1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 8 ۔سر الخلافۃ ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جولائی 27, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    روحانی خزائن جلد8۔ سرالخلافۃ۔ یونی کوڈ

    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 315
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 315
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ٹائیٹل پیج طبع اول
    دنیا میں ایک نذیر آیا پر دنیا نے اس کو قبول نہ کیا۔ لیکن خدا اسے قبول کرے گا اور بڑے زور آور حملوں
    سے اس کی سچائی ظاہر کر دے گا
    ھذا الکتاب یحکم بین الشیعۃ و اھل السنّۃ و یھدی
    الی الحق فی امر الخلافۃ و انہ یقطع معاذیر المخالفین
    و یبرز دقاریر المفترین و لا یستنکرہ الا من لبس
    الصفاقۃ و خلع الصدق والصداقۃ واتبع الکاذبین
    کتاب عزیز محکم یفحم العدا
    فنحمد بارء نا علی ما اسعدا
    وَ سَمَّیْتُہ سر الخلافۃ حُجَّۃً
    بما جاء فی تلک المقاصد ارشدا
    ھذا کتاب سرالخلافۃ لمن
    یبغی سبل الثقافۃ
    و قد طبع فی المطبع ریاض الھند امرتسر
    فی الشھر المبارک محرم ۱۳۱۲ ؁ ھ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 316
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 316
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    نکتہ چینوں کے لئے ہدایت اور واقعی غلطی کی شناخت کے لئے
    ایک معیار
    اکثر جلد باز نکتہ چین خاص کر شیخ محمد
    حسین صاحب بٹالوی جو ہماری عربی کتابوں کو عیب گیری کی نیت سے دیکھتے ہیں بباعث ظلمت تعصب کا تب کے سہو کو بھی غلطی کی مد میں ہی داخل کر دیتے ہیں لیکن درحقیقت ہماری صرفی یا
    نحوی غلطی صرف وہی ہو گی جس کے مخالف صحیح طور پر ہماری کتابوں کے کسی اور مقام میں نہ لکھا گیا ہو۔ مگر جب کہ ایک مقام میں کسی اتفاق سے غلطی ہو اور وہی ترکیب یا لفظ دوسرے
    دس۱۰ بیس۲۰ یا پچاس۵۰ مقام میں صحیح طور پر پایا جاتا ہو تو اگر انصاف اور ایمان ہے تو اس کو سہو کاتب سمجھنا چاہیئے نہ غلطی حالانکہ جس جلدی سے یہ کتابیں لکھی گئی ہیں اگر اس کو
    ملحوظ رکھیں تو اپنے ظلم عظیم کے قائل ہوں اور ان تالیفات کو خارق عادت سمجھیں۔ قرآن شریف کے سوا کسی بشر کا کلام سہو اور غلطی سے خالی نہیں۔ بٹالوی صاحب خود قائل ہیں کہ لوگوں نے
    کلام امرء القیس اور حریری کی بھی غلطیاں نکالیں مگر کیا ایسا شخص جس نے اتفاقاً ایک غلطی پکڑی حریری یا امرء القیس کے مرتبہ پر شمار ہو سکتا ہے۔ ہرگز نہیں۔ نکتہ آوری مشکل ہے اور نکتہ
    چینی ایک ادنیٰ استعداد کا آدمی بلکہ ایک غبی محض کر سکتا ہے۔ ہماری طرف سے حمامۃ البشریٰ اور نور الحق کے بالمقابل رسالہ لکھنے کے لئے اخیر جون ۱۸۹۴ ؁ء تک میعاد تھی وہ گذرگئی۔ مگر
    کسی مولوی نے بالمقابل رسالہ لکھنے کی غرض سے انعام جمع کرانے کے لئے درخواست نہ بھیجی اور اب وہ وقت جاتا رہا ہاں انہوں نے نکتہ چینی کے لئے جو ہمیشہ نالائق اور حاسد طبع لوگوں کا
    شیوہ ہے بہت ہاتھ پیر مارے اور بعض خوش فہم آدمی چند سہو کاتب یا کوئی اتفاقی غلطی نکال کر انعام کے امیدوار ہوئے اور ذرہ آنکھ کھول کر یہ بھی نہ دیکھا کہ فی غلطی انعام دینے کے لئے یہ
    شرط ہے کہ ایسا شخص اوّل بالمقابل رسالہ لکھے ورنہ حاسد نکتہ چین جو اپنا ذاتی سرمایہ علمی کچھ بھی نہیں رکھتے دنیا میں ہزاروں بلکہ لاکھوں ہیں کس کس کو انعام دیا جائے۔ چاہیئے کہ اوّل مثلاً
    اس رسالہ سر الخلافہ کے مقابل پر رسالہ لکھیں اور پھر اگر ان کا رسالہ غلطیوں سے خالی نکلا اور ہمارے رسالہ کا بلاغت فصاحت میں ہم پلّہ ثابت ہوا تو ہم سے علاوہ انعام بالمقابل رسالہ کے فی
    غلطی دو روپیہ بھی لیں جس کے لئے ہم وعدہ کر چکے ہیں ورنہ یونہی نکتہ چینی کرنا حیا سے بعید ہو گا۔ والسلام علی من اتبع الھدی۔
    خاکسار غلام احمد

    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 317
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 317
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    سِرُّؔ الخلافۃ
    بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
    یا مُعطیَ الإیمان والعقل والفکر، نحضُر عتبتک بطیّبات الحمد والشکر، ونُدانی
    حضرتک بتحیات التمجید والتقدیس والذکر، ونطلب وجہک بقصوی الطلب، ونسعی إلیک فی الطرب والکرب۔ نحفد إلیک ولا نشکو الأین، ونؤمن بک ولا نأخذ فی کیف وأین۔ وجئناک منقطعین من الأسباب،
    ومستبطنین أحزانا للقاعدین علی السراب، والغافلین عن الماء المَعین وطرق الصواب والمستکبرین، الذین یبلعون الریق، ویرفضون الکأس والإبریق، ویُعادون الصادقین۔ یترکون الحقائق لأوہام، وما کانت ظنونہم
    إلا کمُخْلِفۃ أو جَہام، ولا یجیؤن أہل المعارف إلا متکاسلین، ولا ینظرون الحق إلّا لاعبین۔ وہجمَتْہم أوہامہم کالبلاء المفاجی فی اللیل الداجی، فصار العقل کالظلف الواجی، فسقطوا علی أنفسہم مُکبّین۔
    والتحصہم تعصّبُہم إلی الإنکار، وأسفوا علی الواعظین، وولّوا الدبر کالفرار۔ وامتلأوا حشنۃ وحقدًا، ونقضوا عہدًا وعقدًا، وطفقوا یسبّون الناصحین۔ وما کان فیہم إلا مادّۃُ غباوۃ، رُکِّبَ بإثاوۃ، فأداروا رحی
    الفتن من عداوۃ، وسفَا تُرْبَہم ریحُ شقاوۃ، فبعدوا عن حق وحلاوۃ، وجلَوا عن أوطان الصدق تاۂین۔ کثرت الفتن من حؤول طبائعہم، وخُدع الناؔ س من اختداعہم۔ ربِّ فارحم أُمّۃ محمد وأصلِحْ حالہم، وطہِّرْ
    بالہم وأَزِلْ بَلبالہم، وصلّ وسلّم وبارِک علی نبیّک وحبیبک محمد خاتم النبیین، وخیر المرسلین، وآلہ الطیبین الطاہرین، وأصحابہ عمائد الملّۃ والدین، وعلی جمیع عبادک الصالحین۔ آمین۔
    أما بعد فاعلم أیہا
    الأخ الفطن، أن ہذہ الأیام أیامٌ تتولد فیہ الفتن
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 318
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 318
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    کتولُّد الدود فی الجیفۃ المنتنۃ، وتضطرم فیہ الأہواء کاضطرام النیران من الخُشُب الیابسۃ۔ وأری الإسلام فی خطرات من إعصار ہذا
    الزمان، وصراصر ہذا الأوان۔ قد انقلب الزمن واشتدت الفتن، وازورّت مُقْلتا الکاذبین مغضبین علی الصادقین، واحمرّت وجنتا الطالحین علی الصالحین۔ وما کان تعبُّسہم إلا لعداوۃ الحق وأہلہ، فإن أہل الحق
    یفضح الخؤونَ ویُنجی الخلق مِن وَحْلہ، ولا یصبر علی کلمات الظالم وجورِہ، بل یرد علیہ من فورہ، ویصول علی کل مریب لتکشیفِ مَعیبٍ، وہتکِ سترِ المدلّسین۔ وکذٰلک کنتُ ممن أسلمَتْہم محبّۃُ الحق إلی طعن
    المعادین، وانجرَّ أمرہم من حمایۃ الصدق إلی تکفیر المکفرین۔
    وتفصیل ذٰلک أن اللّٰہ إذا أمرنی وبشّرنی بکونی مجدّدَ ہذہ الماءۃ، والمسیحَ الموعود لہذہ الأُمۃ، وأخبرتُ المسلمین عن ہذہ الواقعۃ، فغضبوا
    غضبا شدیدا کالجہَلۃ، وساء وا ظنًا من العجلۃ، وقالوا کذّاب ومن المفترین۔ وکلما جئتُہم بثمار من طیبات الکَلِم، أعرضوا إعراض البَشِم، حتی غلظوا لی فی الکلام، ولسعونی بحُمَۃ الملام۔ ونصحت لہم وبلّغت
    حق التبلیغ مرارا، وأعلنتُ لہم وأسررت لہم إسرارًا، فلم تزل سحبُ نصاحتی تبدو کالجَہام، ونخبُ مواعظی تزید شقوۃ اللئام، حتی زادوا اعتداءً وجفاءً، وطبع اللّٰہ علٰی قلوبہم فاشتدوا دناء ۃً وداءً ، وکانوا علی
    أقوالہم مصرّین۔ ولعنونی وکذّبونی وکفّرونی وافتروا من عند أنفسہم أشیاء ، ففعل اللّٰہ ما شاء ، وأرَی المکذّبین أنہم کانوا کاذبین۔ وطردنی کل رجل وَحْدانی، إلا الذی دعانی وہدانی، فحفظنی بلمحاتِ ناظرِہ،
    وربّانی بعنایات خاطرہ، وجعلنی من المحفوظین۔ وبینما أنا أفرّ من سہام أہل السُنّۃ، وأسمع منہم أنواع الطعن واللعنۃ، إذ وصلنی بعض المکاتیب من بعض أعزۃ الشیعۃ وعلماء تلک الفرقۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 319
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 319
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    وسألونی عن أمر الخلا فۃ، وأمارات خاتم الأئمّۃ، وکانوا من طلباء الحق والاہتداء بلؔ بعضہم یظنون بی ظن الأحبّاء ، ویتخذوننی
    من النصحاء ، ویذکروننی بخلوص أصفی وقلب أزکی، فکتبوا المکاتیب بشوقٍ أَبْہٰی وحِرّۃٍ عُظمٰی، وقالوا حَیَّ ہَلْ بکتاب أشفٰی، یشفینا ویروینا ویہب لنا برہانا أقوی۔ ثم أرسلوا إلیّ خطوطا تتریٰ، حتی وجدتُ فیہا
    ریح کبدٍ حَرّیٰ، فتذکرتُ قصّتی الأولی، وانثنیتُ أقدِّم رِجلا وأؤخّر أخریٰ، حتی قوّانی ربی الأغنٰی، وألقٰی فی روعی ما ألقٰی، فنہضتُ لشہادۃ الحق الأجلٰی، ولا أخاف إلا اللّٰہ الأعلٰی، واللّٰہ کاف لعبادہ
    المتوکلین۔
    واعلم أن أہل السُنۃ عادَونی فی شَرْخ شأنی، والشیعۃ کلّمونی فی إقبال زمانی، وإنی سمعتُ من الأولین کلمات کبیرۃ، وسأسمع من الآخرین أکبر منہا، وسأصبر إن شاء اللّٰہ حتی یأتینی نصر ربّی،
    ہو معی حیثما کنتُ؛ یرانی ویرحمنی وہو أرحم الراحمین۔ ورأیت أکثر أحزاب الشیعۃ لا یخافون عند تطاوُل الألسنۃ ولا یتّقون دیّان الآخرۃ، ولا یجمعون نشوب الحقیقۃ، ولا یذوقون لبوب الطریقۃ، ولا یفکرون
    کالصلحاء ، ولا یتخیرون طرق الاہتداء ، فرأیتُ تفہیمہم علی نفسی حقًّا واجبًا ودَینًا لازمًا، لا یسقط بدون الأداء ۔ فکتبتُ ہذہ الرسالۃ العُجالۃ، لعلّ اللّٰہ یصلح شأنہم ویُبدل الحالۃ، ولأبیّن لہم ما اختلفوا فیہ،
    وأخبرہم عن سرّ الخلافۃ، وإن کان تألیفی ہذا کولد الإصافۃ، وما ألّفتُہا إلا ترحّمًا علی الغافلین والغافلات، وإنّما الأعمال بالنیات۔ وأتیقن أن ہذہ الرسالۃ تُحفِظ کثیرا من ذوی الحرارۃ، فإن الحق لا تخلو من
    المرارۃ، وسأسمع من علماء الشیعۃ أنواع اللعنۃ، کما سمعتُ من أہل السُنۃ۔ فیا ربّ لا توکُّلَ إلّا علیک، ولا نشکو إلّا إلیک، ولا ملجأ إلّا ذاتک، ولا بضاعۃ إلّا آیاتک، فإن کنتَ أرسلتنی بأمرک لإصلاح زُمرک،
    فأدرِکْنی بنصرک، وأیِّدْنی کما تُؤیّد الصادقین۔ وإن کنتَ تحبّنی وتختارنی فلا تُخزِنی کالملعونین
    المخذولین۔ وإن ترکتنی فمن الحافظ بعدک وأنت خیر الحافظین؟ فادرَأْ عنی الضرّاء ، ولا تُشمت بی الأعداء ،
    وَانْصرنی علی قوم کافرین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 320
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 320
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    أمّا الرّسالۃ فہی مشتملۃ علی تمہید وبابَین، وفیہا ہدایات لذوی العینین ولقوم متّقین۔ واسأل اللّٰہ أن یضع فیہا بَرَکۃ، ویضمّخہا بعطر
    التأثیر رحمۃ، ولا علم لنا إلا ما علّمَنا وہو خیر المعلّمین۔
    اَلتَّمْہِیْد
    أیہا الأعزۃ اعلموا، رحمکم اللّٰہ، أنی امرؤٌ عُلّمتُ من حضرۃ اللّٰہ القدیر، ویسّرنی ربی لکل دقیقۃ، ونجانی من اعتیاص المسیر، وعافانی
    وصافانی وأسرَا بی من بیت نفسی إلی بیتہ العظیم الکبیر۔ فلما وصلتُ القِبلۃ الحقیقیۃ بعد قطع البراری والبحار۔ وتشرفت بطواف بیتہ المختار، وخصّصنی لطفُ ربی بتجدید المدارک وإدراک الأسرار، وکان ربی
    خِدْنی ووَدُودی، واستودعتُہ کلَّ وجودی، وأخذتُ من لدنہ کلَّ علم من الدقائق والأسرار، وصُبّغتُ منہ فی جمیع الأنظار والأفکار، صرفتُ عنان التوجہ إلی کل نزاع کان بین فِرَق القوم والملۃ، وفتّشتُ فی کل أمر
    من السبب والعلۃ، وما ترکتُ موطنا من مواطن البحث والتدقیق، إلا واستخرجتُ أصلہ علی وجہ التحقیق۔ وعرفتُ أن الناس ما أخطأوا فی فصل القضایا، وما وقعوا فی الخطایا، إلا لمیلہم إلی طرف مع الذہول
    عن طرف آخر، فإنہم کبّروا جہۃ واحدۃ بغیر علم وحسبوا ما خالفہا أصغر وأحقر۔ وکان من عادات النفس أنہا إذا کانت مغمورۃ فی حُبّ شیء من المطلوبات، فتنسٰی أشیاء یخالفہ، ولا تسمع نصاحۃ ذوی
    المواساۃ، بل ربّما یعادیہم ویحسبہم کالأعداء ، ولا یحاضر مجالسہم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 321
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 321
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ولا یصغی إلی کلماتہم لشدۃ الغطاء ۔ ولہذہ المفاسد علل وأسباب وطرق وأبواب، وأکبر عللہ قساوۃ القلوب، والتمایل علی الذنوب،
    وقلۃ الالتفات إلی محاسبات المَعادِ، وصحبۃ الخادعین والکاذبین من أہل العناد، وإذا رسخوا فی جہلہم فتدخُل العثرات فی العادات، وتکون للنفوس کالمرادات، فنعوذ باللّٰہ من عثرات تنتقل إلی عادات وتُلحق
    بالہالکین۔ وربما کانت ہذہ العادات مستتبعۃ لتعصبات راسخۃ من مجادلات۔ والمجادلات النفسانیۃ سمٌّ قاتِل لطالب الحق والرشاد، وقلما ینجو الواقع فی ہذہ الوہاد۔ وقد تکون العلل المفسدۃ والموجبات المضلِّۃ
    مستترۃ، ومن العیون مخفیۃ، حتی لا یراہا صاحبہا ویحسب نفسہ من المصیبین المنصفین۔ وحینئذ یسعی إلی المشاجرات، ویشتد فی الخصوصات*، وربما یحسب خیالا طفیفا ورأیا ضعیفا کأنہ حجۃ قویۃ لا
    دحوض لہا، فیمیس کالفرحین۔ ؔ وسبب کل ذٰلک قلّۃُ التدبر وعدم التبصّر، والخلوُّ عن العلوم الصادقۃ، وانتقاشُ صُورِ الرسوم الباطلۃ، والانتکاسُ علی شہوات النفس بکمال الجنوح والحرمان من مذوقات
    الروح وعجزُ النظر عن الطموح والإخلادُ إلی الأرض والسقوط علیہا کعَمِین۔
    وہذہ ہی العلل التی جعلت الناس أحزابا، فافترقوا وأکثرہم تخیّروا تبابًا، وکذّبوا الحق کِذّابًا، بل لعنوا أہلہ کالمعتدین، وصالوا
    کخریجِ مارِق علی المحسنین، ونظروا إلی أہل الحق بتشامخ الأنوف، وتغیظ القلب المؤوف، وحسبوا أنفسہم من العلماء والأدباء ، وسحبوا ذیل الخیلاء ، وما کانوا من المفلقین۔ ومنہم الذین نالہم من اللّٰہ حظٌّ من
    المعرفۃ، ورزق من الحق والحکمۃ، وفتَح اللّٰہ عیونہم وأزال ظنونہم، فرأوا الحقائق محدقین۔ ومنہم قوم أخطأوا فی کل قدم، وما فرّقوا بین وجود وعدم، وما کانوا مُستبصرین۔ أصرّوا علی مرکوزات خطراتہم،
    وخطوات خطیّاتہم، ولباس سیّءَاتہم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 322
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 322
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    وکانوا قومًا مفسدین۔ وإذا نزعوا عن المِراس بعد ما نزعوا لاء* البأس، ویئسوا من الجِحاس، مالوا میلۃ واحدۃ إلی الإیذاء بالتحقیر
    والازدراء، وبنحت البہتان والافتراء والتوہین۔ وکلما خضعتُ لہم بالکلام مالوا إلی الإرہاق والإیلام، وکادوا یقتلوننی لو لم یعصمنی ربی الحفیظ المعین۔ فلما زاغوا أزاغ اللّٰہ قلوبہم وزاد ذنوبہم، وترکہم فی
    ظلمات متخبطین۔ فنہضتُ بأمر اللّٰہ الکریم، وإذن اللّٰہ الرحیم، لأزیل الأوہام وأداوی السقام، فاستشاطوا من جہلہم غضبًا، وأوغلوا فی أثری زرایۃً وسبًّا، وفتحوا فتاوی التکفیر ودفاتر الدقاریر، وصالوا علیّ
    بأنواع التزویر، ولدغونی بلسان نضناض، وداسونی کرضراض۔ وطالما نصحتُ فما سمعوا، وربما دعوتُ فما توجہوا، وإذا ناضلوا ففرّوا، وإذا أخطأوا فأصرّوا وما أقرّوا، وما کانوا خائفین۔ واجترء وا علی
    خیانات فما ترکوہا وما ألغوہا، حتی إذا الحقائق اختفت، وقضیۃ الدین استعجمت، وشموس المعارف أفَلتْ وغرَبتْ، ومعارف الملۃ اغتربت وتغرّبت، والدواہی اقتربت ودنت وغلبت، وبیتُ الدین والدیانۃ خلا،
    والأمن والإیمان أجفلا، ورأیت أن الغاسق قد وقب، ووجہ المحجّۃ قد انتقب، فألّفتُ کُتبًا لتأیید الدین، وأترعتُہا من لطائف الأسرار والبراہین، فماؔ انتفعوا بشیء من العظات، بل حسبوہا من الکلِم المُحفِظات، وما
    کانوا منتہین۔ ثم إذا رأوا أن الحجۃ وردت، والنار المضرمۃ بردت، وما بقی جمرۃٌ من جمر الشبہات، فرکنوا إلی أنواع التحقیرات، وقالوا مِن أشراط المجدّد الداعی إلی الإسلام، أن یکون من العلماء الراسخین
    والفضلاء الکرام، وہذا الرجل لا یعلم حرفا من العربیۃ، ولا شیءًا من العلوم الأدبیۃ، وإنا نراہ من الجاہلین، وکانوا فی قولہم ہذا من الصادقین۔ فدعوتُ ربی أن یُعلّمنی إن شاء ، فاستجاب لی الدعاء ، فأصبحتُ
    بفضلہ عارف اللسان، وملیح البیان،
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 323
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 323
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ومن الماہرین۔ ثم ألّفتُ کتابَین فی العربیۃ مأمورًا من الحضرۃ الأحدیۃ، وقلتُ یا معشر الأعداء ، إن کنتم من العلماء والأدباء ، فأْتوا
    بمثلہا یا ذوی الدعاوی والریاء إن کنتم صادقین۔ ففرّوا واختفوا کالذی ادّان عند صفر الیدین، وما أفاق إلا بعد إنفاق العین، فما قدر علی الأداء بعد التطوق بالدَّین، ولازَمہ مستحقّہ وجدَّ فی تقاضی اللُجَین، فما کان
    عندہ إلّا مواعید المَین؛ کذلک یخزی اللّٰہ قومًا متکبرین۔
    والعجب أنہم مع ہذا الخزی والذلّۃ، وہتک الأستار والنکبۃ، ما رجعوا إلی التوبۃ والانکسار، وما اختاروا طریق الأبرار والأخیار، وما صلح القلب
    المؤوف وما تقوضت الصفوف، وما سعوا إلی الحق نادمین، بل لوَوا عنی العِذار، وأبدوا التعبس والازورار، وکانوا إلی الشر مبادرین۔ ورأیتہم فی سلاسل بخلہم کالأسیر، وما نصحتُ لہم نصحا إلا رجعتُ یائسا
    من التأثیر، حتی تذکرتُ قصۃ القردۃ والخنازیر، واغرورقت عینای بالدموع إذ رأیتُ ذوی الأبصار کالضریر، وإنی مع ذلک لستُ من الیائسین۔ وقیّض القدر لہتک أستارہم وجزاء فجّارہم أنہم عادَوا الصادقین
    وآذَوا المنصورین، وحسبوا الجدّ عبثًا والحق باطلًا، فکانوا من المعرضین۔ وإنی أراہم فی لددٍ وخصامٍ مُذْ أعوامٍ، وما أری فیہم أثر التائبین۔ فأردتُ أن أترکہم وأُعرض عن الخطاب، وأطوی ذکرہم کطیّ السجلّ
    للکتاب، وأتوجہ إلی الصالحین۔ ولو أن لی ما یوجّہہم إلی الحق والصواب لفعلتُہ، ولکنی ما أری تدبیرا فی ہذا الباب، وکلما دعوتہم فرجعوا متدہدہین، وکلما قدتہم فقہقروا مقہقہین۔ بید أنی أری فی ہذہ الأیام أن
    بعض العلماء من الکرام رجعوا إلی واؔ نتثرت عقود الزہام، وزال قلیل من الظلام، وتبرء وا من خُبث أقوال الأعداء ، وأدہشہم الإدلاج فی اللیلۃ اللیلاء ، وجاء ونی کالسعداء
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 324
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 324
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    فقلت بَخْ بَخْ لہٰذا الاہتداء ، وہداہم ربّہم إلٰی عین الصواب من ملامح السراب، فوافَونی مخلصین، وشربوا من کأس الیقین، وسُقوا من
    ماء معین، وأرجو أن یکمل اللّٰہ رشدہم ویجعلہم من العارفین۔ کذلک أدعو لنظّارۃ ہذا الکتاب، أن یوفقہم اللّٰہ لہم لتخیُّر طرق الصواب، ومَن بلغ أشُدَّہ فی نشأۃ روحانیۃ، فسیقبل دعوتی بتفضلات ربّانیۃ، وقد سوّیت
    کلماتی لکل من یصغی إلی عظاتی، واللّٰہ یعلم مجالبہا ویدری طالبہا، ولا تتخطی نفس فطرتہا، ولا تترک قریحۃ شاکلتہا، ولا یہتدی إلا من کان من المہتدین۔
    اعلموا، رحمکم اللّٰہ، أن قومًا من الذین قالوا
    نحن أتباع أہل البیت ومن الشیعۃ قد تکلموا فی جماعۃٍ من أکابر الصحابۃ وخلفاء رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم وأئمۃ الملّۃ، وغلَوا فی قولہم وعقیدتہم، ورموہم بالکفر والزندقۃ، ونسبوہم إلی الخیانۃ
    والغضب والظلم والغیّ، وما انتہوا إلی ہذا الزمان وما فاءَ مَنشَرُہم إلی الطیّ، وما کانوا منتہین۔ بل استحلَوا ذِکرَ سبِّہم، وتخیَّروہ فی کل خبّہم، وحسبوہ من أعظم الحسنات بل من ذرائع الدرجات، ولعنوہم
    واستجادوا ہٰذا العمل وشدوا علیہ الأمل، وظنوا أنہ من أفضل أنواع الصالحات والقربات، وأقرب الطرق لابتغاء مرضاۃ اللّٰہ وأکبر وسائل النجاۃ للعابدین۔ وإنی لبِثتُ فیہم بُرہۃً من الزمان، ویسّر لی ربّی کل
    وقت الامتحان، وکنتُ أتوجس ما کانوا یُسرّون فی ہذا الباب، وأُصغی إلی کل طرق الاختلاب۔ وقیّض القدر لحسن معرفتی أن عالما منہم کان من أساتذتی، فکنت فیہم لیلا ونہارًا، وجادلتہم مرارًا، وما کان أن
    تتواری عنی خبیئتہم أو یخفی علی رؤیتہم، فوجدتُ أنہم قوم یُعادون أکابر الصحابۃ، ورضوا بغشاوۃ الاسترابۃ۔ ورأیت کل سعیہم فی أن یفرُط إلی الشیخَین ذمٌّ، أو یلحقہما وصمٌ، فتارۃ کانوا یذکرون للناس قصۃ
    القرطاس، وتارۃ یشیرون إلی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 325
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 325
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    قضیۃ الفَدَک، ویزیدون علیہ أشیاء من الإفک، وکذلک کانوا مجترئین علی افتراۂم وسادرین فی غلواۂم، وکنتُ أسمع منہم ذمّ الصحابۃ
    وذمّ القرآن وذمّ أہل اللّٰہ وجمیع ذوی العرفان، وذؔ مّ أُمّہات المؤمنین۔ فلما عرفت عُود شجرتہم وخبیءۃ حقیقتہم أعرضتُ عنہم وحُبِّبَ إلیّ الانزواء ، وفی قلبی أشیاء ۔ وکنتُ أتضرع فی حضرۃ قاضی الحاجات،
    لیزیدنی علمًا فی ہذہ الخصومات، فعُلِّمتُ رشدًا من الکریم الحکیم، وہُدیتُ إلی الحق من اللّٰہ العلیم، وأخذتُ عن رب الکائنات وما أخذتُ عن المحدثات، ولا یکمل رجل فی مقام العلم وصحۃ الاعتقادات إلا بعدما
    یلقی العلوم من لدن خالق السماوات، ولا یَعصمُ من الخطأ إلا الفضل الکبیر من حضرۃ الکبریاء ، ولا یبلغ أحدٌ إلی حقیقۃ الأمور ولو أفنی العمر فیہا إلی الدہور، إلا بعد ہبوب نسیم العرفان من اللّٰہ الرحمن، وہو
    المعلِّم الأعظم والحکیم الأعلم، یُدخل من یشاء فی رحمتہ، ویجعل من یشاء من العارفین۔ وکذلک مَنَّ اللّٰہ علیّ ورزقنی من العلوم النخب، وجعل لی نورًا یتبع الشیاطین کالشہب، وأخرجنی من لیلۃ حالکۃ الجلباب
    إلٰی نہار ما غشّاہ قطعۃ من الرَباب، وطرَد کلّ مانع عن الباب، فأصبحت بفضلہ من المحفوظین۔ وأُعطیتُ مِن فہمٍ یخرق العادۃ، ومِن نور ینیر الفطرۃ، ومِن أسرار تعجب الطالبین۔ وصبّغ اللّٰہ علومی بلطائف
    التحقیق، وصفاہا کصفاء الرحیق، وکل قضیۃ قضی بہا وجدانی أرانیہا اللّٰہ فی کتابہ لیزید اطمینانی، ویتقوّی إیمانی، فأحاطت عینی ظہر الآیات وبطنہا وظعاینہا وظعنہا، وأُعطیتُ فراسۃ المحدّثین۔ وأعطانی
    ربی أنواع فہم جدید لکل زکی وسعید، لیصلح المفاسد الجدیدۃ ویہدی الطبائع السعیدۃ، ومن یہدی إلا ہو، وہو أرحم الراحمین۔ نظر الزمان ووجد أہلہ قد أضاعوا الإیمان، واختاروا الکذب والبہتان، مَن ائتُمن
    منہم خان، ومن تکلم مان، فنفخ فی روعی أسرارًا عظیمۃ، وکلمات
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 326
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 326
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    قدیمۃ، وجعلنی من ورثاء النبیین، وقال إنک من المأمورین لتنذر قوما ما أُنذر آباؤہم ولتستبین سبیل المجرمین۔
    الباب الأول فی
    الخلافۃ
    اعلم، سقاک اللّٰہ کأس الفکر العمیق، أنی عُلّمتُ من ربی فی أمر الخلافۃ علی وجہ التحقیق، وبلغتُ عمق الحقیقۃ کأہل التدقیق، وأظہر علیّ ربی أن الصِدّیق والفاروق وعثمان، کانوا من أہلؔ
    الصلاح والإیمان، وکانوا من الذین آثرہم اللّٰہ وخُصّوا بمواہب الرحمان، وشہد علی مزایاہم کثیر من ذوی العرفان۔ ترکوا الأوطان لمرضاۃ حضرۃ الکبریاء ، ودخلوا وطیس کل حرب وما بالوا حَرَّ ظہیرۃ الصیف
    وبرد لیل الشتاء ، بل ماسوا فی سبل الدین کفتیۃ مترعرعین، وما مالوا إلٰی قریب ولا غریب، وترکوا الکل للّٰہ ربّ العالمین۔ وإن لہم نشرًا فی أعمالہم، ونفحات فی أفعالہم، وکلہا ترشد إلی روضات درجاتہم
    وجنات حسناتہم۔ ونسیمہم یُخبر عن سرّہم بفوحاتہا، وأنوارہم تظہر علینا بإناراتہا۔ فاستدِلُّوا بتأرُّجِ عَرفہم علی تبلُّج عُرفہم، ولا تتبِعوا الظنون مستعجلین۔ ولا تتکأوا علی بعض الأخبار، إذ فیہا سمّ کثیر وغلوّ
    کبیر لا یلیق بالاعتبار، وکم منہا یشابہ ریحًا قُلّبًا، أو برقًا خُلّبًا، فاتّقِ اللّٰہ ولا تکن من متّبعیہا، ولا تکن کمثل الذی یحب العاجلۃ ویبتغیہا، ویذَرُ الآخرۃ ویُلغیہا۔ ولا تترک سبل التقوی والحلم، ولا تَقْفُ ما لیس لک
    بہ علم، ولا تکن من المعتدین۔ واعلم أن الساعۃ قریب والمالک رقیب، وسیوضع لک المیزان، وکما تدین تُدان، فلا تظلم نفسک وکن من المتقین۔ ولا أجادلکم الیوم بالأخبار، فإنہا لہا أذیال کالبحر الذخار، ولا یُخرج
    منہا الدررَ إلّا ذوالأبصار، والناس یکذّبون بعضہم بعضا عند ذکر الآثار، فلا ینتفعون منہا إلا قلیل
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 327
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 327
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    من الأحرار، وإنما أقول لکم ما عُلّمتُ من ربی لعل اللّٰہ یہدیکم إلی الأسرار۔ وإنی أُخبرتُ أنہم من الصالحین، ومن آذاہم فقد آذی اللّٰہ
    وکان من المعتدین، ومن سبّہم بلسان سلیط وغیظ مستشیط، وما انتہی عن اللعن والطعن وما ازدجر من الفحش والہذیان، بل عزا إلیہم أنواع الظلم والغصب والعدوان، فما ظلم إلا نفسہ، وما عادیٰ إلا ربّہ، وإن
    الصحابۃ من المبرَّئین۔ فلا تجترؤا علی تلک المسالک، فإنہا من أعظم المہالک، ولیعتذر کل لعّان من فرطاتہ، ولیتّق اللّٰہ ویوم مؤاخذاتہ، ولیتّق ساعۃ تہیِّج أسف المخطئین، وتُرِی ناصیۃ العادین۔ وأَیمُ اللّٰہ إنہ
    تعالی قد جعل الشیخَین والثالث الذی ہو ذو النُّورَین، کأبواب للإسلام وطلائع فوج خیر الأنام، فمن أنکر شأنہم وحقّر برہانہم، وما تأدّب معہم بل أہانہم، وتصدی للسب وتطاوُل اللسان، فأخاف علیہ من سوء
    الخاتمۃ وسلب الإیمان۔ والذین آذوہم ولعنوہم ورموہم بالبہتان، فکان آخر أمرہم قساوۃ القلب وغضب الرحمان۔ وإنی جربتُ مرارا وأؔ ظہرتہا إظہارًا، أن بغض ہٰؤلاء السادات من أکبر القواطع عن اللّٰہ مظہرِ
    البرکات، ومن عاداہم فتُغلَق علیہ سُدَدُ الرحمۃ والحنان، ولا تُفتح لہ أبواب العلم والعرفان، ویترکہ اللّٰہ فی جذبات الدنیا وشہواتہا، ویسقط فی وہاد النفس وہوّاتہا، ویجعلہ من المبعدین المحجوبین۔ وإنہم أُوذوا
    کما أُوذی النبیون، ولُعنوا کما لُعن المرسلون، فحقّق بذٰلک میراثہم للرسل، وتحقّقَ جزاؤہم کأئمۃ النِحل والملل فی یوم الدّین۔ فإن مؤمنا إذا لُعن وکُفر من غیر ذنب، ودُعی بہجو وسبّ من غیر سبب، فقد شابہَ
    الأنبیاء وضاہی الأصفیاء ، فسیُجزی کما یُجزی النبیون، ویری الجزاء کالمرسلین۔ ولا شک أن ہؤلاء کانوا علی قدم عظیم فی اتباع خیر الأنبیاء ، وکانوا أُمّۃً وسطًا کما مدحہم ذو العزّ والعلاء ، وأیدہم بروح منہ
    کما أیّد کل أہل الاصطفاء ۔ وقد
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 328
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 328
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ظہرت أنوار صدقہم وآثار طہارتہم کأجلی الضیاء ، وتبین أنہم کانوا من الصادقین۔ ورضی اللّٰہ عنہم ورضوا عنہ، وأعطاہم ما لم
    یُعطَ أحد من العالمین۔ أَہُم کانوا منافقین؟ حاشا وکلا، بل جلّ معروفہم وجلی، وإنہم کانوا طاہرین۔ لا عیب کتطلُّب مثالبہم وعثراتہم، ولا ذنب کتفتیش معائبہم وسیئاتہم، واللّٰہ إنہم کانوا من المغفورین۔ والقرآن
    یحمدہم ویُثنی علیہم و یبشرہم بجنّات تجری من تحتہا الأنہار، ویقول إنہم أصحاب الیمین والسابقون والأخیار والأبرار، ویسلّم بسلام البرکات علیہم، ویشہد أنہم کانوا من المقبولین۔ ولا شک أنہم قوم أدحضوا
    المودّات للإسلام، وعادَوا القوم لمحبۃ خیر الأنام، واقتحموا الأخطار لمرضاۃ الرب العلام، والقرآن یشہد أنہم آثروا مولاہم وأکرموا کتابہ إکرامًا، وکانوا یبیتون لربّہم سُجّدًا وقیاما، فأی ثبوت قطعی علی ما
    خالفہ القرآن؟ والظن لا یُساوی الیقین أیہا الظانّ۔ أتقوم علی جہۃ یبطلہ الفرقان؟ فأَخْرِجْ لنا إن جاء ک البرہان ولا تتبع ظنون الظانین۔ وواللّٰہ إنہم رجال قاموا فی مواطن الممات لنصرۃ خیر الکائنات، وترکوا
    للّٰہ آباء ہم وأبناء ہم ومزّقوہم بالمرہفات، وحاربوا الأحبّاء فقطعوا الرؤوس، وأعطوا للّٰہ النفائس والنفوس، وکانوا مع ذلک باکین لقلۃ الأعمال ومتندمین۔ وما تمضمضت مُقلتہم بنوم الراحۃ، إلا قلیل من حقوق
    النفس للاستراحۃ، وما کانوا متنعمین۔ فکیف تظنون أنہم کانوا یظلمون ویغصبون، ولا یعدلون ویجورون؟ وقد ثبت أنہم خرجوا من الأہواء ، وسقطوا فی حضرۃ الکبریاء ، وکانوا قومًا فانین۔ فکیف تسبّون أیہا
    الأعداء ؟ وما ہذا الارتیاء الذی یأباہ الحیاء ؟ فاتقوا اللّٰہ وارجعوا إلی رفق وحلم، ستُسألون عما تظنون بغیر علم وبرہان مبین۔ لا تنظروا إلی ذلاقتی ومرارۃ مذاقتی، وانظروا إلی دلیل عرضتُ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 329
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 329
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    علیکم وأمعِنوا فیہ بعینیکم، فإنکم تبعتم ظنون الظانین، وترکتم کتابا یہب الحق والیقین، وما بعد الحق إلّا ضلال مبین۔ وکیف یُنسَب إلی
    الصحابۃ ما یُخالف التقوی وسُبلہ، ویُباین الورع وحُللہ، مع أن القرآن شہد بأن اللّٰہ حبَّب إلیہم الإیمان، وکرَّہ إلیہم الکفر والفسوق والعصیان، وما کَفَّرَ أحدا منہم مع وقوع المقاتلۃ، فضلا عن المشاجرۃ، بل
    سمّی کلَّ أحد من الفریقین مسلمین، وقال
    ۔ ۱؂ فانظر إلی ما قال اللّٰہ وہو أصدق الصادقین۔ إنک تُکفِّر المؤمنین لبعض مشاجرات، وہو یسمّی الفریقین مؤمنین مع مقاتلات ومحاربات، ویُسمیہم إخوۃ مع بغی
    البعض علی البعض ولا یُسمی فریقا منہم کافرین، بل یغضب علی الذین یتنابزون بالألقاب، ویلمزون أنفسہم ولا یسترون کالأحباب، ویسخرون ویغتابون ویظنون ظن السوء ویمشون متجسّسین۔ بل یُسمی مرتکب
    ہذہ الأمور فسوقا بعد الإیمان، ویغضب علیہ کغضبہ علی أہل العدوان، ولا یرضی بعبادہ أن یسبّوا المؤمنین المسلمین، ہذا مع أنہ یُسمی فی ہذہ الآیات فریقًا من المؤمنین باغین ظالمین، وفریقا من الآخرین
    مظلومین، ولٰکن لا یسمی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 330
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 330
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/330/mode/1up
    أحدًا منہما مرتدین۔ وکفاک ہذہ الہدایۃ إن کنتَ من المتقین، فلا تُدخِل نفسک تحت ہذہ الآیات، ولا تبادر إلی المہلکات، ولا تقعد مع
    المعتدین۔ وقال اللّٰہ فی مقام آخر فی مدح المؤمنین ۔۱؂ فانظر کلمات رب العالمین۔ أتُسمِّی قوما فاسقین سماہم اللّٰہ متقین؟ ثم قال عزّ وجلّ فی مدح صحابۃ خاتم النبیین۔ ۔ ۔ ۲؂ فانظر کیف سمّی کل من عاداہم
    کافرًا، وغضب علیہم، فاخش اللّٰہ واتق الذی یغیظ بالصحابۃ کافرین، وتدبَّرْ فی ہذہ الآیات وآیات أخری لعل اللّٰہ یجعلک من المہتدین۔
    ومن تظنّٰی من الشیعۃ أن الصدّیق أو الفاروق غصَب الحقوق، وظلم
    المرتضٰی أو الزہراء ، فترَک الإنصاف وأحبَّ الاعتساف، وسلَک مسلک الظالمین۔ إن الذین ترکوا أوطانہم وخلانہم وأموالہم وأثقالہم للّٰہ ورسولہ، وأُوذوا من الکفار وأُخرِجوا من أیدی الأشرار، فصبروا کالأخیار
    والأبرار، واستُخلِفوا فما أترعوا بیوتہم من الفضۃ والعَین، وما جعلوا أبناۂم وبناتہم ورثاءَ الذہب واللُّجَین، بل ردّوا کل ما حصل إلی بیت المال، وما جعلوا أبناء ہم خلفاء ہم کأبناء الدنیا وأہل الضلال، وعاشوا فی
    ہذہ الدنیا فی لباس الفقر والخصاصۃ، وما مالوا إلی التنعم کذوی الإمرۃ والریاسۃ۔ أیُظَنّ فیہم أنہم کانوا ینہبون أموال الناس بالتطاولات ویمیلون إلی الغصب والنہب والغارات؟ أکان ہذا أثر صحبۃ رسول اللّٰہ
    خیرِ الکائنات
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 331
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 331
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/331/mode/1up
    وقد حمد ہم اللّٰہ وأثنی علیہم رب المخلوقات؟ کلا بل إنہ زکّی نفوسہم وطہّر قلوبہم، ونوّر شموسہم، وجعلہم سابقین للطیبین الآتین۔
    ولا نجد احتمالا ضعیفا ولا وہما طفیفا یُخبر عن فساد نیاتہم، أو یشیر إلی أدنی سیئاتہم، فضلا عن جزم النفس علی نسبۃ الظلم إلی ذواتہم، وواللّٰہ إنّہم کانوا قومًا مقسطین۔ ولو أنہم أُعطوا وادیا من مال من غیر
    حلال فما تَفَلوا علیہ وما مالوا کأہل الہویٰ، ولو کان ذہبا کأمثال الرُبٰی، أو کمقدار الأؔ رضین۔ ولو وجدوا حلالا من المال لأنفقوہ فی سبل ذی الجلال ومہمات الدین۔ فکیف نظن أنہم أغضبوا الزہراء لأشجار،
    وآذوا فلذۃ النبی کأشرار، بل للأحرار نیّات، ولہم علی الحق ثبات، وعلیہم من اللّٰہ صلوات، واللّٰہ یعلم ضمائر المتقین۔ وإن کان ہذا من نوع الإیذاء فما نجا أسد اللّٰہ الفتی من ہذا، بل ہو أحد من الشرکاء ، فإنہ
    اختطب بنت أبا الجہل وآذی الزہراء ۔ فإیاک والاعتداء ، وخُذِ الاتقاء ودَعِ الاعتداء ولا تتناولْ فُضالۃ الذین زاغوا عن المحجّۃ، وأعرضوا عن الحق بعد رؤیۃ أنوار الحجّۃ، وکانوا علی الباطل مصرّین۔ وإنی
    أدلّک إلی صراط تنجیک من شبہات، فتدبَّرْ ولا ترکَنْ إلی جہلات۔ وأقول للّٰہ وأرجو أن تنیب، ولو أسمع من بعضکم التثریب، ولا یہتدی عبد إلّا إذا أراد اللّٰہ ہداہ، ولا یرتوی أحدٌ إلا من سُقیاہ۔ إنہ یری قلبی
    وقلوبکم، وینظر قدمی وأسلوبکم، ویعلم ما فی صدور العالمین۔
    فاعلم أیہا العزیز أن حزبًا من علماء الشیعۃ ربما یقولون إن خلافۃ الأصحاب الثلاثۃ ما ثبت من الکتاب والسُنّۃ، وأما خلافۃ سیدنا المرتضٰی
    وأسد اللّٰہ الأتقی فثبت من وجوہ شتی وبرہان أجلی، فلزم من ذلک أن یکون الخلفاء الثلا ثۃ غاصبین ظالمین آلتین، فإن خلافتہم ما ثبتت من خاتم النبیین وخیر المرسلین:۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 332
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 332
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/332/mode/1up
    أما الجواب فلا یخفی علی المتدبرین الفارہین وعباد اللّٰہ المتقین، أن ادعاء ثبوت خلافۃ سیدنا المرتضی صلفٌ بحتٌ ما لحقہ من
    الصدق سنا وزورۃُ طیف، ولیس معہ شہادۃ من کتاب ربنا الأعلٰی، ولیس فی أیدی الشیعۃ شمّۃٌ علی ثبوت ہذا الدعوی، فلا شک أن خلافتہ عاری الجلدۃ من حلل الثبوت، وبادی الجردۃ کالسبروت، ولو کان علیٌّ
    بحرَ الأنوار ومستغنیا عن النعوت۔ فلا تُجادل من غیر حق، ولا تستثفر بفویطتک فی الریاغۃ، ولا تُرِنا تُرّہات البلاغۃ، ولا تقفُ طرق المتعسفین۔ وإنی واللّٰہ لطالما فکرت فی القرآن وأمعنتُ فی آیات الفرقان،
    وتلقیتُ أمر الخلافۃ بوسائل التحقیق، وأعددت لہ الأُہَبَ کلہا للتدقیق، وصرفتُ ملامح عینی إلی کل الأنحاء ، ورمیتُ مرامی لحظی إلی جمیع الأرجاء ، فما وجدتُ سیفًا قاطعًا فی ہذا المصافّ کآیۃ الاستخلاف،
    واستبنتُ أنہا من أعظم الآیات، والدلائل الناطقۃ للإ ثبات، والنصوص الصریحۃ من رب الکائنات، لکل من یرید أن یحکم بالحق کالقضاۃ، وأتیقن أنہ من طاب خِیمُہ، وأُشرِبَ ماء الإمعان أدیمُہ، یقبلہا شاکرا،
    ویحمد اللّٰہ ذاکرا، علی ما ہداہ وأخرجہ من الضالّین۔
    وإن آیات الفرقان یقینیۃ وأحکامہا قطعیۃ، وأما الأخبار والآثار فظنیۃ وأحکامہا شکیۃ، ولو کانت مرویۃ من الثقات ونحاریر الرواۃ۔ ولا تنظروا إلی
    نضرۃ حلیتہا وخضرۃ دوحتہا، فإن أکثرہا ساقطۃ فی الظلمات، ولیست بمعصومۃ من مس أیدی ذوی الظلامات، وقد
    عسر اشتیارہا من مشار النحل، وإنما أُخذت من النہل۔ ہذا حال
    أکثر الأحادیث کما
    لا یخفی علی الطیّب والخبیث، فبأی حدیث بعد کتاب اللّٰہ تؤمنون؟ وإذا حصحص الحق فأین تذہبون؟ وماذا بعد
    الحق إلا الضلال، فاتقوا الضلال یا معشر المسلمین۔ وقد قلتُ من قبل
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 333
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 333
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/333/mode/1up
    أن الآثار ما کفلت التزام الیقینیات، بل ہی ذخیرۃ الظنیات والشکیات، والوہمیات والموضوعات، فمن ترک القرآن واتکأ علیہا فیسقط
    فی ہُوۃ المہلکات ویلحق بالہالکین۔ إنما الأحادیث کشیخ بالی الریاش بادی الارتعاش، ولا یقوم إلا بہراوۃ الفرقان وعصا القرآن، فکیف یُرجی منہا اکتناز الحقائق وخزنُ نشبِ الدقائق من دون ہذا الإمام الفائق؟
    فہذا ہو الذی یؤوی الغریب ویُطہّر المعیب، ویفتتح النطق بالدلائل الصحیحۃ والنصوص الصریحۃ، وکلہ یقین وفیہ للقلوب تسکین۔ وہو أقوی تقریرًا وقولا، وأَوْسع حفاوۃ وطولا، ومَن ترکہ ومال إلی غیرہ
    کالعاشق، فتجاوز الدّین والدّیانۃ ومرق مروق السہم الراشق، ومن غادر القرآن وأسقطہ من العین، وتبع روایات لا دلیل علی تنزُّہہا من المَیْن، فقد ضل ضلالا مبینا، وسیصطلی لظی حسرتین، ویریہ اللّٰہ أنہ کان
    علی خطأ مبین۔ فالحاصل أن الأمن فی اتباع القرآن، والتباب کل التباب فی ترک الفرقان۔ ولا مصیبۃ کمصیبۃ الإعراض عن کتاب اللّٰہ عند ذوی العینَین، فاذکروا عظمۃ ہذا الرزء وإن جلّ لدیکم رزءُ الحسَین،
    وکونوا طلاب الحق یا معشر الغافلین۔
    والآن نذکر الآیات الکریمۃ والحجج العظیمۃ علی خلافۃ الصدّیق لنریک ثبوتہ علی وجہ التحقیق، فإن طریق الارتیاب قطعۃ من العذاب، ومن تبع الشبہات فأوقع نفسہ
    فی المہلکات، وأما قطع الخصومات فلا یکون إلا بالیقینیات، فاسمع منی ولا تبعد عنی، وأدعو اللّٰہ أن یجعلک من المتبصرین۔ قالؔ اللّٰہ عزّ وجلّ فی کتابہ المبین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 334
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 334
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/334/mode/1up
    ۔ ۔ ۔۔ ۱؂ ہذا ما بشّر ربّنا للمؤمنین، وأخبر عن علامات المستخلفین، فمن أتی اللّٰہ للاستماحۃ، وما سلک مسلک الوقاحۃ، وما شد جبائر
    التلبیس علی ساعد الصراحۃ، فلا بد لہ من أن یقبل ہذا الدلیل، ویترک المعاذیر والأقاویل، ویأخذ طرق الصالحین۔
    وأما تفصیلہ لیبدو علیک دلیلہ فاعلموا یا أولی الألباب والفضل اللباب، أن اللّٰہ قد وعد فی ہذہ
    الآیات للمسلمین والمسلمات أنہ سیستخلفنّ بعض المؤمنین منہم فضلًا ورحمًا، ویبدّلنّہم من بعد خوفہم أمنًا، فہذا أمر لا نجد مصداقہ علی وجہ أتمَّ وأکملَ إلا خلافۃ الصدّیق، فإن وقت خلافتہ کان وقت الخوف
    والمصائب کما لا یخفی علٰی أہل التحقیق۔ فإن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم لما تُوفّی نزلت المصائب علی الإسلام والمسلمین، وارتد کثیر من المنافقین، وتطاولت ألسنۃ المرتدین، وادعی النبوۃ نفرٌ من
    المفترین، واجتمع علیہم کثیر من أہل البادیۃ، حتی لحق بمسیلمۃ قریبٌ من ماءۃ ألف من الجہَلۃ الفجَرۃ، وہاجت الفتن وکثرت المحن، وأحاطت البلایا قریبا وبعیدا، وزُلزل المؤمنون زلزالا شدیدا۔ ہنالک ابتُلِیت
    کل نفس من الناس، وظہرت حالات مُخوفۃ مدہشۃ الحواسّ، وکان المؤمنون مضطرین کأن جَمْرًا أُضرمت فی قلوبہم أو ذُبحوا بالسکّین۔ وکانوا یبکون تارۃ من فراق خیر البریۃ، وأخری من فتن ظہرت کالنیران
    المحرقۃ، ولم یکن أثرًا من أمن، وغلبت المفتتنون کخضراءِ دِمْنٍ، فزاد المؤمنون خوفًا وفزعًا، وملئت القلوب دہشا وجزعا۔ ففی ذلک الأوان جُعِل أبو بکر رضی اللّٰہ عنہ حاکم الزمان وخلیفۃ خاتم النبیین۔ فغلب
    علیہ ہمٌّ وغمٌّ من أطوار رآہا، ومن آثار شاہدہا فی المنافقین والکافرین والمرتدین، وکان یبکی کمرابیع الربیع، وتجری عبراتہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 335
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 335
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/335/mode/1up
    کالینابیع، ویسأل اللّٰہ خیر الإسلام والمسلمین۔
    وعن عائشۃ رضی اللّٰہ عنہا قالت لما جُعل أبی خلیفۃ وفوّض اللّٰہ إلیہ الإمارۃ،
    فرأی بمجرد الاستخلاف تموُّجَ الفتن من کل الأطراف، ومَوْرَ المتنبئین الکاذبین، وبغاوۃ المرتدین المنافقین۔ فصُبّت علیہ مصائب لو صُبّت علی الجبال لانہدت وسقطت وانکسرت فی الحال، ولکنہ أُعطی صبرا
    کالمرسلین، حتی جاء نصر اللّٰہ وقُتل المتنبؤن وأُہلک المرتدون، وأُزیل الفتن ودفُع المحن، وقُضی الأمر واستقام أمر الخلافۃ، ونجّی اللّٰہ المؤمنین من الآفۃ، وبدّل من بعد خوفہم أمنا، ومکّن لہم دینہم وأقام علی
    الحق زمنا وسود وجوہ المفسدین، وأنجز وعدہ ونصر عبدہ الصدّیق، وأباد الطواغیت والغرانیق، وألقی الرعب فی قلوب الکفار، فانہزموا ورجعوا وتابوا وکان ہذا وعد من اللّٰہ القہار، وہو أصدق الصادقین۔
    فانظر کیف تم وعد الخلافۃ مع جمیع لوازمہ وإماراتہ فی الصدّیق، وادْعُ اللّٰہ أن یشرح صدرک لہذا التحقیق، وتدبَّرْ کیف کانت حالۃ المسلمین فی وقت استخلافہ وقد کان الإسلام من المصائب کالحریق، ثم ردّ
    اللّٰہ الکرّۃ علی الإسلام وأخرجہ من البِیر العمیق، وقُتِل المتنبؤن بأشدّ الآلام، وأُہلکَ المرتدون کالأنعام، وآمن اللّٰہ المؤمنین من خوفٍ کانوا فیہ کالمیتین۔ وکان المؤمنون یستبشرون بعد رفع ہذا العذاب، ویہنّؤن
    الصدّیق ویتلقونہ بالترحاب، ویحمدونہ ویدعون لہ من حضرۃ ربّ الأرباب، وبادروا إلی تعظیمہ وآداب تکریمہ، وأدخلوا حبَّہ فی تامورہم، واقتدوا بہ فی جمیع أمورہم، وکانوا لہ شاکرین۔ وصقلوا خواطرہم،
    وسقوا نواضرہم، وزادوا حبًّا، وودّوا وطاوعوہ جہدًا وجِدًّا، وکانوا یحسبونہ مبارکًا ومؤیّدا کالنّبیین۔ وکان ہذا کُلّہٗ من صدق الصدّیق والیقین العمیق۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 336
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 336
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/336/mode/1up
    وواللّٰہ إنہ کان آدم الثانی للإسلام، والمظہر الأول لأنوار خیر الأنام، وما کان نبیا ولکن کانت فیہ قُوی المرسلین؛ فبصدقہ عادت
    حدیقۃ الإسلام إلی زخرفہ التام، وأخذ زینتَہ وقُرّتَہ بعد صدمات السہام، وتنوعت أزاہیرہ وطُہّرت أغصانہ من القَتام، وکان قبل ذلک کمیتٍ نُدِبَ، وشرید جُدِبَ، وجریح نُوِّبَ وذبیح جُوِّبَ، وألیمِ أنواعِ تعبٍ،
    وحریقِ ہاجرۃٍ ذاتِ لہبٍ، ثم نجّاہ اللّٰہ من جمیع تلک البلیّات، واستخلصہ من سائر الآفات، وأیّدہ بعجائب التأییدات حتی أَمَّ الملوکَ ومَلِکَ الرقاب، بعدما تکسَّرَ وافترش التراب، فزُمّتْ ألسنۃ المنافقین وتہلّلَ وجہ
    المؤمنین۔ وکل نفس حمدت ربہ وشکرت الصدّیق، وجاء تہ مطاوعًا إلّاؔ الزندیق، والذی کان من الفاسقین۔ وکان کل ذلک أجرَ عبدٍ تخیَّرَہ اللّٰہ وصافاہ ورضی عنہ وعافاہ، واللّٰہ لا یضیع أجر المحسنین۔
    فالحاصل أن ہذہ الآیات کلّہا مُخبرۃ عن خلافۃ الصدّیق، ولیس لہا محملٌ آخر فانظر علی وجہ التحقیق، واخش اللّٰہ ولا تکن من المتعصبین۔ ثم انظر أن ہذہ الآیات کانت من الأنباء المستقبلۃ لتزید إیمان المؤمنین
    عند ظہورہا، ولیعرفوا مواعید حضرۃ العزۃ، فإن اللّٰہ أخبر فیہا عن زمان حلول الفتن ونزول المصائب علی الإسلام بعد وفاۃ خیر الأنام، ووعد أنہ سیستخلف فی ذلک الزمن بعضا من المؤمنین ویؤمِنہم من بعد
    خوفہم، ویمکّن دینہ المتزلزل ویہلک المفسدین۔ ولا شک أن مصداق ہذا النبأ لیس إلا أبو بکر وزمانہ، فلا تنکر وقد حصحص بُرہانہ۔ إنہ وجد الإسلام کجدار یرید أن ینقضّ من شر أشرار، فجعلہ اللّٰہ بیدہ کحصن
    مشید لہ جدران من حدید، وفیہ فوج مطیعون کعبید۔ فانظر ہل تجد من ریب فی ہذا، أو یسوغ عندک إتیان نظیرہ من زُمر آخرین؟
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 337
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 337
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/337/mode/1up
    وإنی أعلم أن بعض الشیعۃ یخاصم أہل السُنّۃ فی ہذا المقام، وقد تمادت أیام الخصام، وربما انتہی الأمر من مخاصمۃ إلی ملاکمۃ
    ومقاتلۃ، وأفضتْ إلی محاکمۃ ومرافعۃ۔ وأتعجب علی الشیعۃ وسوء فہمہم، وأتأوّہ لإفراطِ وہمہم، قد تجلّت لہم الآیات وظہرت القطعیات، فیفرّون ممتعضین ولا یتفکرون کالمنصفین۔ فہا أنا أدعوہم إلی أمرٍ
    یفتح عینہم، وسواء بیننا وبینہم، أن نحاضر فی مضمار، ونتضرع فی حضرۃ رب قہار، ونجعل لعنۃ اللّٰہ علی الکاذبین۔
    فإن لم یظہر أثر دعائی إلی سَنۃ، فأقبل لنفسی کل عقوبۃ، وأُقرّ بأنہم کانوا من
    الصادقین، ومع ذلک أعطی لہم خمسۃ آلاف من الدراہم المروجۃ، وإن لم أُعطِ فلعنۃ اللّٰہ علیّ إلی یوم الآخرۃ۔ وإن شاء وا فأجمع لہم تلک الدراہم فی مخزن دولۃ البریطانۃ، أو عند أحد من الأعزّۃ۔ بید أنی لا
    أُخاطب کلّ أحد من العامّۃ، إلا الذی ینسج رسالۃ علی منوال ہذہ الرسالۃ۔ وما اخترتُ ہذا المنہج إلّا لأعلم أن المباہل المناضل من أہل الفضیلۃ والفطنۃ، لا من الجہَلۃ الغُمر الذین لیس لہم حظ وافر من
    العربیۃ، فإن الذی حل محلّ الأنعام لا یستحق أن یؤثَر للإنعام، والذی ہو کالجِمال، لا یلیق أن یجلس فی مجالس الحسن والجَمال، ومن تعرض للمنافثۃ لا بد لہ من المشابہۃ۔ فمن لم یکن مثلی أنبلَ الکُتّاب فلیس ہو
    عندی لائقا للخطاب۔ ثم لما بلغتُ قُنّۃَ ہذا المقام المنیع، فضلا من القدیر البدیع، أحبُّ أن أری مثلی فی ہذہ الکرامۃ، وأکرہ أن أناضل کل أحد من العامۃ، فإنہ فیہ کسر شأنی، وعار لعلوّ مکانی، فلا أکلّمہ أبدًا، بل
    أعرض عن الجاہلین۔
    وعُلّمتُ أن الصدّیق أعظم شأنا وأرفع مکانا من جمیع الصحابۃ، وہو الخلیفۃ الأوّل بغیر الاسترابۃ، وفیہ نزلت آیات الخلافۃ، وإن کنتم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 338
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 338
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/338/mode/1up
    زعمتم یا عِدا الثقافۃ أن مصداقہا غیرہ بعد عصرہ فأْتوا بفصّ خبرہ إن کنتم صادقین۔ وإن لم تفعلوا ولن تفعلوا فلا تکونوا أعداء
    الأخیار، واقطعوا خصاما متطائر الشرار۔ وما کان لمؤمن أن یرکن إلی اشتطاط اللدد، ولا یدخل باب الحق مع انفتاح السدد۔ وکیف تلعنون رجلا أثبت اللّٰہ دعواہ، وإذا استَعْدی فأعْداہ وأری الآیاتِ لعَدْواہ*، وطَرَّ
    مکر الماکرین، وہو نجّی الإسلام من بلاءٍ ہاضَ وجورٍ فاضَ، وقتَل الأفعی النضناضَ، وأقام الأمن والأمان، وخیّب کل من مان، بفضل اللّٰہ رب العالمین۔
    وللصدّیق حسنات أُخری وبرکات لا تُعدّ ولا تُحصٰی، ولہ
    مننٌ علی أعناق المسلمین، ولا ینکرہا إلا الذی ہو أوّل المعتدین۔ وکما جعلہ اللّٰہ موجبا لِأَمن المؤمنین ومِطفاءً لنیران الکافرین والمرتدین، کذٰلک جعلہ مِن أوّل حُماۃ الفرقان وخدام القرآن ومُشیعی کتاب اللّٰہ
    المبین۔ فبذل سعیہ حق السعی فی جمع القرآنِ واستطلاع ترتیبہ من محبوب الرحمنِ، وہملتْ عیناہ لمواساۃ الدین ولا ہمول عین الماء المعین۔ وقد بلغت ہذہ الأخبار إلی حد الیقین، ولکن التعصب تعقَّرَ فِطنَ
    المتدبرین۔ وإن کنت ترید أصل الواقعات ولبّ النکات، فاربأ بنفسک أن تنظر بحیث یغشاک درن التعصبات۔ وإیاک وطرق التعسفات، فإن النصَفَۃ مفتاح البرکات، ولا ترحض عن القلب قشف الظلمۃ إلّا نور العدل
    والنصفۃ۔ وإن العلوم الصادقۃ والمعارف الصحیحۃ رفیعۃ جدًّا کعرش حضرۃ الکبریاء ، والنصفۃ لہا کسُلّم الارتقاء ، فمن کان یرجو حل المشکلات وقُنیۃ النکات، فلیعمل عملًا صالحا ویتّق التعسّفَ والتعصبات
    وطرق الظالمین۔
    ومن حسنات الصدّیق ومزایاہ الخاصۃ أنہ خُصّ لمرافقۃ سفر الہجرۃ، وجُعل شریک مضائق خیر البریۃ وأنیسہ الخاص فی باکورۃ المصیبۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 339
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 339
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/339/mode/1up
    لیثبت تخصّصہ بمحبوب الحضرۃ۔ وسرُّ ذلک أنّ اللّٰہ کان یعلم بأن الصدّیق أشجع الصحابۃ ومن التقاۃ وأحبّہم إلی رسول اللّٰہ صلی
    اللّٰہ علیہ وسلم ومن الکُماۃ، وکان فانیا فی حُبّ سیّد الکائنات، وکان اعتاد من القدیم أن یمونہ ویراعی شؤونہ، فأسلی بہ اللّٰہ نبیَّہ فی وقتٍ عبوس وعیش بوسٍ، وخُصّ باسم الصدّیق وقربِ نبی الثقلَین، وأفاض اللّٰہ
    علیہ خلعۃ ثَانِیَ اثْنَیْنِ، وجعلہ من المخصوصین۔
    ومع ذٰلک کان الصدّیق من المجربین ومن زمر المتبصّرین۔ رأی کثیرا من مغالق الأمور وشدائدہا، وشہد المعارک ورأی مکایدہا، ووطئ البوادی وجلامِدَہا، وکم
    من مہلکۃ اقتحمہا وکم من سبل العوج قومہا وکم من ملحمۃ قدمہا وکم من فتن عدمہا وکم من راحلۃ أنضاہا فی الأسفار، وطوی المراحل حتی صار من أہل التجربۃ والاختبار وکان صابرًا علی الشدائد ومن
    المرتاضین۔ فاختارہ اللّٰہ لرفاقتہ مورد آیاتہ، وأثنی علیہ لصدقہ وثباتہ، وأشار إلی أنہ کان لرسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم أوّل الأحبّاء ، وخُلِقَ من طینۃ الحرّیۃ وتفوَّقَ درَّ الوفاء ، ولأجل ذلک اختُیرَ عند
    خطب خشَّی وخوف غشَّی، واللّٰہ علیم حکیم یضع الأمور فی مواضعہا، ویُجری المیاہ من منابعہا، فنظر إلی ابن أبی قحافۃ نظرۃً، ومنّ علیہ خاصۃ، وجعلہ من المتفردین، وقال وہو أصدق القائلین۔
    فتدبَّرْ فی
    ہذہ الآیات فہما وحزما، ولا تُعرض عمدا وعزما، وأحسِنِ النظر
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 340
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 340
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/340/mode/1up
    فیما قال رب العالمین۔ ولا تلج مقاحم الأخطار بسبّ الأخیار والأبرار وأحبّاء القہّار، فإن أنْفَسَ القربات تخیُّرُ طرق التقاۃ والإعراض
    عن المہلکات، وأمتنَ أسبابِ العافیۃ کفُّ اللسان والتجنب من السبّ والغیبۃ، والاجتناب من أکل لحم الإخوۃ۔ انظر إلی ہذہ الآیۃ الموصوفۃ، أتُثنی علی الصدّیق أو تجعلہ مورد اللوم والمعتبۃ ؟ أتعرف رجلا آخر
    من الصحابۃ الذی حُمد بہذہ الصفات بغیر الاسترابۃ ؟ أتعرف رجلا سُمّی ثَانِیَ اثْنَیْنِ وسُمی صاحبًا لنبی الثقلین، وأُشرِکَ فی فضل إِنّ اللّٰہَ مَعَنَا، وجُعِل أحدٌ من المؤیّدین؟ أتعلم أحدًا حُمّد فی القرآن کمثل ہذہ
    المحمدۃ، وسُفر زحام الشبہات عن حالاتہ المخفیۃ، وثبت فیہ بالنصوص الصریحۃ لا الظنیۃ الشکّیّۃ أنہ من المقبولین؟ وواللّٰہ، ما أری مثل ہذا الذکر الصریح ثابت بالتحقیق الذی مخصوص بالصدّیق لرجل
    آخر فی صحف رب البیت العتیق۔ فإن کنت فی شک ممّا قلت، أو تظن أنی عن الحق ملتُ، فأْت بنظیر من القرآن، وأرِنا لرجل آخر تصریحًا من الفرقان، إن کنت من الصادقین۔
    واللّٰہ إن الصدّیق رجل أُعطی من
    اللّٰہ حلل الاختصاص، وشہد لہ اللّٰہ أنہ من الخواص، وعزا معیّۃَ ذاتِہ إلیہ، وحَمدَہ وشَکَرَہ وأثنی علیہ، وأشار إلی أنہ رجل لم یطبْ لہ فراق المصطفٰی، ورضی بفراق غیرہ من القربی، وآثر المولی وجاء ہ
    یسعی، فساق إلی الموت ذَوْدَ الرغبۃ، وأزجی کل ہوی المہجۃ۔ استدعاہ الرسول للمرافقۃ، فقام ملبّیا للموافقۃ، وإذ ہمّ القوم بإخراج المصطفٰی، جاء ہ النبی حبیب اللّٰہ الأعلٰی، وقال إنی أُمرتُ أن أہاجر وتہاجر
    معی ونخرج من ہذا المأوی، فحمدلَ الصدّیق علی ما جعلہ اللّٰہ رفیق المصطفٰی فی مثل ذلک البلویٰ، وکان ینتظر نصرۃ النبی المبغیِّ علیہ إلٰی أن آلت ہذہ الحالۃ إلیہ، فرافقہ فی شجون من جدّ ومجون، وما خاف
    قتل القاتلین۔ ففضیلتہ ثابتۃ من جلیّۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 341
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 341
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/341/mode/1up
    الحکم والنص المحکم، وفضلہ بیّن بدلیل قاطع، وصدقہ واضح کصبح ساطع۔ إنہ ارتضٰی بنعماء الآخرۃ وترک تنعم العاجلۃ، ولا یبلغ
    فضائلہ أحد من الآخرین۔
    وإن سألت أن اللّٰہ لِمَ آثرَہ لصدر سلسلۃ الخلافۃ، وأیّ سر کان فیہ من ربّ ذی الرأفۃ، فاعلم أن اللّٰہ قد رأی أن الصدّیق رضی اللّٰہ عنہ وأرضی آمنَ مع رسول اللّٰہ صلعم بقلب أسلم
    فی قوم لم یسلم، وفی زمان کان نبی اللّٰہ وحیدًا، وکان الفساد شدیدا، فرأی الصدّیق بعد ہذا الإیمان أنواع الذلۃ والہوان ولعن القومِ والعشیرۃ والإخوان والخلّان، وأُوذی فی سبیل اللّٰہ الرحمان، وأُخرج من وطنہ
    کما أُخرج نبی الإنس ونبی الجان، ورأی مِحنًا کثیرۃ من الأعداء ، ولعنًا ولومًا من الأحباء ، وجاہدَ بمالہ ونفسہ فی حضرۃ العزّۃ، وکان یعیش کالأذلّۃ، بعدما کان من الأعزّۃ ومن المتنعمین۔ وأُخرج فی سبیل اللّٰہ،
    وأُوذی فی سبیل اللّٰہ، وجاہد بأموالہ فی سبیل اللّٰہ، فصار بعد الثراء کالفقراء والمساکین۔ فأراد اللّٰہ أن یُریہ جزاء الأیام التی قد مضت علیہ، ویبدّلہ خیرا مما ضاع من یدیہ، ویُریہ أجر ما رأی ابتغاءً لمرضاۃ
    اللّٰہ، واللّٰہ لا یُضیع أجر المحسنین۔ فاستخلفہ ربہ ورفع لہ ذکرہ وأسْلی، وأعزّہ رحمۃ منہ وفضلا، وجعلہ أمیر المؤمنین۔
    اعلموا، رحمکم اللّٰہ، أن الصحابۃ کلہم کانوا کجوارح رسول اللّٰہ صلعم وفخر نوع
    الإنسان، فبعضہم کانوا کالعیون وبعضہم کانوا کالآذان، وبعضہم کالأیدی وبعضہم کالأرجل من رسول الرحمان، وکلّ ما عملوا من عمل أو جاہدوا من جہد فکانت کلہا صادرۃ بہذہ المناسبات، وکانوا یبغون بہا
    مرضاۃ رب الکائنات رب العالمین۔ فالذی یقول أن الأصحاب الثلاثۃ کانوا من الکافرین والمنافقین أو الغاصبین فلا یُکفّر إلا کلہم أجمعین
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 342
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 342
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/342/mode/1up
    لأن الصحابۃ کلہم کانوا بایعوا أبا بکر ثم عمر ثم عثمان رضی اللّٰہ عنہم وأرضی، وشہدوا المعارک والمواطن بأحکامہم العظمی،
    وأشاعوا الإسلام وفتحوا دیار الکافرین۔ فما أری أجہلَ مِن الذی یزعم أن المسلمین ارتدوا کلہم بعد وفاۃ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم، کأنہ یکذب کل مواعید نصرۃ الإسلام التی مذکورۃ فی کتاب اللّٰہ العلام،
    سبحان ربنا حافظ الملۃ والدین۔ ہذا قول أکثر الشیعۃ، وقد تجاوزوا الحد فی تطاول الألسنۃ، وغضّوا من الحق عینہم، فکیف ینتظم الوفاق بیننا وبینہم؟ ! وکیف یرجع الأمر إلی ودادٍ، وإنہم لفی وادٍ ونحن فی
    وادٍ؟ واللّٰہ یعلم أنّا من الصادقین۔
    یا حسرۃ علیہم إنہم لا یستفیقون من غَشْی التعصبات، ولا یکفکفون من البہتانات۔ أعجبنی شأنہم وما أدری ما إیمانہم، إنہم کفروا الأصحاب الثلاثۃ وحسبوہم من المنافقین
    المرتدین، مع أن القرآن ما بلغہم إلا من أیدی تلک الکافرین، فلزمہم أن یعتقدوا أن القرآن الموجود فی أیدی الناس لیس بشیء، بل ساقط من الأساس، ولیس کلام رب الأناس، بل مجموعۃ کلمات المحرفین۔ فإنہم
    کلہم کانوا خائنین وغاصبین بزعمہم، وما کان أحد منہم أمینا ومن المتدینین۔ فإذا کان الأمر کذلک فعلی ما عوّلوا فی دینہم؟ وأی کتاب من اللّٰہ فی أیدیہم لتلقینہم؟ فثبت أنہم قوم محرومون لا دین لہم ولا کتاب
    الدین۔ فإن قوما إذا فرضوا أن الصحابۃ کفروا ونافقوا وارتدوا علی أعقابہم وأشرکوا، واتّسخوا بوسخ الکفر وما تطہّروا، فلا بد لہم أن یُقرّوا بأنّ القرآن ما بقی علی صحتہ وحُرّف وبُدّل عن صورتہ وزِید
    ونُقص، وغُیّر من سحنتہ وقِیْدَ إلی غیر حقیقتہ، فإن ہذا الإقرار لزِمہم ضرورۃً بعد إصرارہم جرأۃً علیؔ أن القرآن ما شاع من أیدی المؤمنین الصالحین، وأشاعہ قوم من الکافرین الخائنین المرتدین۔ وإذا
    اعتقدوا أن القرآن مفقود، وکل
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 343
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 343
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/343/mode/1up
    مَن جمعہ فہو کافر مردود، فلا شکّ أنہم یئسوا مما نزل علی أبی القاسم خاتم النبیین، وغُلقت علیہم أبواب العلم والمعرفۃ والیقین،
    ولزمہم أن یُنکروا النوامیس کلہا، فإنہم محرومون من تصدیق الأنبیاء والإیمان بکتب المرسلین۔ وإذا فرضنا أنا* ہذا ہو الحق أن الصحابۃ ارتدوا کلہم بعد خاتم الأنبیاء ، وما بقی علی الشریعۃ الغرّاء إلا علي
    رضی اللّٰہ عنہ ونفر قلیلون معہ من الضعفاء ، وہم مع إیمانہم رکنوا إلی إخفاء الحقیقۃ، واختاروا تقیّۃً للدنیا الدنیۃ تخوّفًا من الأعداء ، أو لجذب المنفعۃ والحطام، فہذا أعظم المصائب علی الإسلام، وبلیۃ
    شدیدۃ علی دین خیر الأنام۔ وکیف تظن أن اللّٰہ أخلف مواعیدہ، وما أری تأییدہ، بل جعل أوّلَ الدَنِّ دُرْدِیًّا، وأفسد الدین من کید الخائنین۔
    فنُشہِد الخلق کلہم أنّا بریؤن من مثل تلک العقائد، وعندنا ہی مقدمات
    الکفر وإلی الارتداد کالقائد، ولا تناسب فطرۃ الصالحین۔ أکفَر الصحابۃ بعد ما أفنوا أعمارہم فی تأیید الإسلام، وجاہدوا بأموالہم وأنفسہم لنصرۃ خیر الأنام، حتی جاء ہم الشیب وقرب وقت الحمام؟ فمن أین
    تولدت إرادۃ متجددۃ فاسدۃ بعد تودیعہا، وکیف غاضت میاہ الإیمان بعد جریان ینابیعہا؟ فویل للذین لا یذکرون یوم الحساب، ولا یخافون ربّ الأرباب، ویسبّون الأخیار مستعجلین۔
    والعجبُ أن الشیعۃ یُقرّون
    بأن أبا بکر الصّدّیق آمن فی أیام کثرۃ الأعداء ، ورافقَ المصطفٰی فی ساعۃ شدّۃ الابتلاء ، وإذا خرج رسول اللّٰہ صلعم فخرج معہ بالصدق والوفاء ، وحمل التکالیف وترَک المألف والألیف، وترکَ العشیرۃ کلہا
    واختار الربّ اللطیف، ثم حضر کل غزوۃ وقاتل الکفار وأعان النبی المختار، ثم جُعل خلیفۃ فی وقت ارتدت جماعۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 344
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 344
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/344/mode/1up
    من المنافقین، وادعی النبوۃ کثیر من الکاذبین، فحاربہم وقاتلہم حتی عادت الأرض إلی أمنہا وصلاحہا وخاب حزب المفسدین۔
    ثم
    مات ودُفن عند قبر سید النبیین وإمام المعصومین، وما فارقَ حبیبَ اللّٰہ ورسولہ لا فی الحیاۃ ولا فی الممات، بل التقیا بعد بینِ أیامٍ معدودۃ فتہادی تحیۃ المحبین۔ والعجب کلّؔ العجب أن اللّٰہ جعل أرض مرقد
    نبیہ بزعمہم مشترکۃ بین خاتم النبیین والکافرَین الغاصبَین الخائنَین وما نجّی نبیّہ وحبیبہ من أذیّۃ جوارہما بل جعلہما لہ رفیقَین مؤذیَین فی الدنیا والآخرۃ، وما باعدہ عن الخبیثین سبحان ربّنا عما یصفون، بل
    أَلحَقَ الطیبین بإمام الطیبین۔ إن فی ذلک لآیات للمتبصرین۔
    فتفکر یا من تحلَّی بفہم، ولا ترکَنْ مِن یقین إلی وہم، ولا تجترء علی إمام المعصومین۔ وأنت تعلم أن قبر نبینا صلی اللّٰہ علیہ وسلم روضۃ عظیمۃ من
    روضات الجنۃ، وتبوَّأَ کلَّ ذروۃ الفضل والعظمۃ، وأحاط کل مراتب السعادۃ والعزۃ، فما لہ وأہل النیران؟ فتفکر ولا تختر طرق الخسران، وتأدّبْ مع رسول اللّٰہ یا ذا العینین، ولا تجعل قبرہ بین الکافرَین
    الغاصبَین، ولا تُضِعْ إیمانک للمرتضی أو الحسَین، ولا حاجۃ لہما إلی إطرائک یا أسیر المَین، فاغمدْ عَضْبَ لسانک وکن من المتقین۔ أیرضی قلبک ویسرّ سِرْبک أن تُدفَن بین الکفار وکان علی یمینک ویسارک کافران
    من الأشرار؟ فکیف تجوّز لسیّد الأبرار ما لا تجوّز لنفسک یا مَورد قہر القہار؟ أتُنزل خیر الرسل منزلۃً لا ترضاہا، ولا تنظرُ مراتب عصمتہ وإیاہا؟ أین ذہب أدبک وعقلک وفہمک؟ أم اختطفتْہ جنُّ وہمک
    وترکتک کالمسحورین؟ وکما صُلتَ علی الصدّیق الأتقی کذلک صُلتَ علی علیّ المرتضی، فإنک جعلت علیًّا نعوذ باللّٰہ کالمنافقین، وقاعدا علی باب الکافرین، لیفیض شربہ الذی غاض
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 345
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 345
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/345/mode/1up
    وینجبر مِن حالہ ما انہاض۔ ولا شک أن ہذہ السیر بعیدۃ من المخلصین، ولا توجد إلا فی الذی رضی بعادات المنافقین۔
    وإذا سئل
    عن الشیعۃ المتعصّبین مَن کان أوّل مَن أسلم من الرجال البالغین وخرج من المنکرین المخالفین، فلا بدّ لہم أن یقولوا إنہ أبو بکر۔ ثم إذا سئل مَن کان أوّل من ہاجر مع خاتم النبیین ونبذ العلق وانطلق حیث انطلق،
    فلا بد لہم أن یقولوا إنہ أبو بکر۔ ثم إذا سئل من کان أول المستخلَفین ولو کالغاصبین، فلا بد لہم أن یقولوا إنہ أبو بکر۔ ثم إذا سئل من کان جامِعَ القرآن لیشاع فی البلدان، فلا بد لہم أن یقولوا إنہ أبو بکر۔ ثم إذا سئل
    من دُفن بجوار خیر المرسلین وسید المعصومین، فلا بد لہم أن یقولوا إنہ أبو بکر وعمر۔ فالعجب کل العجب أن کل فضیلۃ أُعطیت للکافرین المنافقین، وکل خیر الإسلام ظہرت من أیدی المعادین أیزعم مؤمن أن
    أول لبنۃ لإسلام* کانؔ کافرا ومن اللئام؟ ثم أول المہاجرین مع فخر المرسلین کان کافرًا ومن المرتدین؟ وکذلک کل فضیلۃ حصلت للکفار حتی جوار قبر سید الأبرار، وکان علیٌّ من المحرومین، وما مال إلیہ
    اللّٰہ بالعدوی وما أجدی من جدوی، کأنہ ما عرفہ وأخطأ من التنکیر واحرورف فی المسیر، وإن ہذا إلا کذب مبین۔
    فالحق أن الصدّیق والفاروق، کانا من أکابر الصحابۃ وما أَلَتَا الحقوق، واتخذا التقوی
    شرعۃ، والعدل نُجْعۃ، وکانا ینقّبان عن الأخبار ویفتّشان من أصل الأسرار، وما أرادا أن یُلْفِیا من الدنیا بُغْیۃ، وبذلا النفوس للّٰہ طاعۃً۔ وإنی لم ألقَ کالشیخَین فی غزارۃ فیوضہم وتأیید دین نبی الثقلَین۔ کانا أَسْرعَ
    من القمر فی اتّباع شمس الأمم والزمر، وکانا فی حُبّہ من الفانین۔ واستعذبا کل عذاب لتحصیل صواب، ورضوا بکل ہوان لنبی الذی لیس لہ ثان،
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 346
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 346
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/346/mode/1up
    وظہرا کالأسود عند تَلقِّی القوافل والجنود من ذوی الکفر والصدود، حتی غلب الإسلام وانہزم الجمع، وانزوی الشرک وانقمع،
    وأشرقت شمس الملّۃ والدّین۔ وکانت خاتمۃ أمرہما جِوار خیر المسلمین، مع خدمات مرضیۃ فی الدین، وإحسانات ومنن علی أعناق المسلمین۔ وہذا فضل من اللّٰہ الذی لا تخفی علیہ الأتقیاءُ، وإن الفضل بید اللّٰہ
    یؤتیہ من یشاء ، من اعتلق بذیلہ مع کمال میلہ، فإن اللّٰہ لن یُضیعہ ولو عاداہ کل ما فی العالمین، ولا یری طالبہ خسرًا ولا عسرًا ولا یذَر اللّٰہ الصادقین۔
    اللّٰہ أکبرما أعظمَ شأنَ سرِّہما وصدقہما دُفنوا فی مدفن
    لو کان موسی وعیسی حیَّین لتمناہا غبطۃ، ولکن لا یحصل ہذا المقام بالمنیۃ، ولا یعطی بالبغیۃ، بل ہی رحمۃ أزلیۃ من حضرۃ العزۃ، ولا تتوجہ إلا إلی الذین توجّہت العنایۃ إلیہم من الأزل، وحفّتْ بہم ملاحف
    الفضل۔ فقضیت العجب کل العجب أن الذین یُفضّلون علیًّا علی الصدیق لا یرجعون إلی ہذا التحقیق، ویتہافتون علی ثناء المرتضی ولا ینظرون مقام الصدّیق الأتقی۔ فاسأل الذین یکفّرون الصدّیق ویلعنون، وسیعلم
    الذین ظلموا بأی منقلب ینقلبون۔ إن الصدّیق والفاروق کانا أمیرا رکبٍ علوا للّٰہ قُننًا عُلی ودعوا إلی الحق أہل الحضارۃ والفلا، حتی سرت دعوتہم إلی بلاد قصوی، وقد أُودعت خلافتہما لفائف ثمرؔ ات
    الإسلام، وضُمِّخت بالطِیب العمیم بأنواع فوز المرام۔ وکان الإسلام فی زمن الصدّیق متألّما بأنواع الحریق، وشارفَ أن تُشنّ علی سِرْبِہ فوج الغارات، وتَنَادَی عند نہبہ یا للثارات، فأدرکہ الرب الجلیل بصدق
    الصدّیق، وأخرج بَعاعہ من البئر العمیق، فرجع إلی حالۃ الصلاح من مَحْلۃٍ نازحۃ، وحالۃٍ رازحۃ، فأوجب لنا الإنصاف أن نشکر ہذا المعین ولا نُبالی المعادین۔ فإیاک أن تلوی عذارک عمن نصر سیدک
    ومختارک، وحفظ دینک ودارک، وقصد للّٰہ فلاحک وما
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 347
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 347
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/347/mode/1up
    امتار سماحک۔ فیا للعجب الأظہر کیف یُنکَرُ مجدُ الصدّیق الأکبر، وقد برقت شمائلہ کالنیّر؟ ولا شک أن کل مؤمن یأکل أُکُلَ غَرْسہ،
    ویستفیض من علوم درسہ۔ أعطی لدیننا الفرقان، ولدنیانا الأمن والأمان، ومن أنکرہ فقد مان ولقی الشیط والشیطان۔ والذین التبس علیہم مقامہ فما أخطأوا إلا عمدًا، وحسبوا الغدق ثمدًا، فتوغروا غضبًا، وحقروا
    رجلًا کان أوّلَ المکرمین۔
    وإن نفس الصدّیق کانت جامعۃ للرجاء والخوف، والخشیۃ والشوق، والأنس والمحبۃ۔ وکان جوہر فطرتہ أبلغ وأکمل فی الصفاء ، منقطعًا إلی حضرۃ الکبریاء ، مفارقا من النفس
    ولذاتہا، بعیدًا عن الأہواء وجذباتہا، وکان من المتبتلین۔ وما صدر منہ إلّا الإصلاح، وما ظہر منہ للمؤمنین إلا الفلاح۔ وکان مبرَّأً من تہمۃ الإیذاء والضیر، فلا تنظر إلی التنازعات الداخلیۃ، واحملہا علی
    محامل الخیر۔ ألا تُفکر أن الرجل الذی ما التفت من أوامر ربہ ومرضاتہ إلی بنیہ وبناتہ، لیجعلہم متمولین أو مِن أحد وُلاتہ، وما کان لہ من الدنیا إلا ما کان میرۃَ ضروراتہ، فکیف تظن أنہ ظلم آل رسول اللّٰہ
    مع أن اللّٰہ فضّلہ علی کلّہم بحسن نیاتہ، وجعلہ من المؤیدین۔ ولیس کل نزاع مبنیًّا علی فساد النیات کما زعم بعض متبعی الجہلات، بل رُبَّ نزاع یحدث من اختلاف الاجتہادات۔ فالطریق الأنسب والمنہج
    الأصوب أن نقول إن مبدأ التنازعات فی بعض صحابۃ خیر الکائنات کانت الاجتہادات لا الظلامات والسیئات۔ والمجتہدون معفوون ولو کانوا مخطئین۔ وقد یحدث الغلّ والحقد من التنازعات فی الصلحاء ، بل فی
    أکابر الأتقیاء والأصفیاء ، وفی ذلک مصالح للّٰہ ربّ العالمین۔
    فکلّما جری فیہم أو خرج مِن فِیہم، فیجب أن یُطوی لا أن یُروَی، ویجب أن یُفوَّض أمورہم إلی اللّٰہ الذی ہو ولی الصالحین۔ وقد جرت سُنّتہ
    أنہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 348
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 348
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/348/mode/1up
    یقضی بین الصالحین علی طریق لا یقضی علیہ قضایا الفاسقین، فإنہم کلّہم أحباؤہ وکلہم من المحبین المقبولین، ولأجل ذلک أخبرنا
    ربنا عن مآل نزاعہم وقال وہو أصدق القائلین۔ ۔ ۱؂ ہذا ہو الأصل الصحیح، والحق الصریح، ولکن العامۃ لا یُحققون فی أمر کأولی الأبصار، بل یقبلون القِصص بغضّ الأبصار، ثم یزید أحدٌ منہم شیئا علی
    الأصل المنقول، ویتلقاہ الآخر بالقبول، ویزید علیہ شیئا آخر من عند نفسہ، ثم یسمعہ ثالث بشدۃ حرصہ، فیؤمن بہ ویُلحق بہ حواشی أُخری، وہلمّ جرّا، حتی تستتر الحقیقۃ الأولی، وتظہر حقیقۃ جدیدۃ تخالف
    الحق الأجلی، وکذلک ہلک الناس من خیانات الراوین۔
    وکم من حقیقۃ تسترت، وواقعات اختفت وقِصص بُدّلت، وأخبار غُیّرت وحُرّفت، وکم من مفتریات نُسجت، وأمور زیدت ونُقصت، ولا تعلم نفس ما کانت
    واقعۃ أوّلًا ثُم ما صُیّرت وجُعلت۔ ولو أُحْیِیَ الأوّلون من الصحابۃ وأہل البیت وأقارب خیر البریۃ، وعُرضت علیہم ہذہ القِصص، لتعجبوا وحولقوا واسترجعوا من مفتریات الناس، ومما طوّلوا الأمر من الوسواس
    الخنّاس، وجعلوا قطرۃً کبحر عظیم، وأرَوا کجبالٍ ذرّۃَ عظمٍ رمیمٍ، وجاء وا بکذب یخدع الغافلین۔
    والحق أن الفتن قد تموجت فی أزمنۃ وسطی، وماجت کتموُّج الریح العاصفۃ والصراصر العظمٰی۔ وکم من
    أراجیف المفترین قُبلت کأخبار الصادقین، فتَفطَّنْ ولا تکن من المستعجلین۔ ولو أُعطیتَ مما أفاض اللّٰہ علینا لقبلتَ ما قلتُ لک وما کنتَ من المعرضین۔ والآن لا أعلم أنک تقبلہ أو تکون من المنکرین۔ والذین کانت
    عداوۃ الشیخَین جوہرَ روحہم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 349
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 349
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/349/mode/1up
    وجزءَ طبیعتہم، ودیدنَ قریحتہم، لا یقبلون قولنا أبدا حتی یأتی أمر اللّٰہ، ولا یصدّقون کشوفا ولو کانت ألوفا، فلیتربصوا زمانا یُبدی ما
    فی صدور العالمین۔
    أیہا الناس لا تظنوا ظن السوء فی الصحابۃ، ولا تُہلکوا أنفسکم فی بوادی الاؔ سترابۃ، تلک أمۃ قد خلت ولا تعلمون حقیقۃً بعُدت واختفت، ولا تعلمون ما جری بینہم، وکیف زاغوا بعد
    ما نوّر اللّٰہ عینہم، فلا تتبعوا ما لیس لکم بہ علم واتقوا اللّٰہ إن کنتم خاشعین۔ وإن الصحابۃ وأہل البیت کانوا روحانیین منقطعین إلی اللّٰہ ومتبتلین، فلا أقبل أبدًا أنہم تنازعوا للدنیا الدنیّۃ، وأسرَّ بعضُہم غِلَّ
    البعض فی الطویّۃ، حتی رجع الأمر إلی تقاتُل بینہم وفساد ذات البین وعناد مبین۔ ولو فرضنا أن الصدّیق الأکبر کان من الذین آثروا الدنیا وزخرفہا، ورضوا بہا وکان من الغاصبین، فنضطر حینئذ إلی أن نقرّ أنّ
    علیًّا أسد اللّٰہ أیضا کان من المنافقین، وما کان کما نخالہ من المتبتلین؛ بل کان یکبّ علی الدنیا ویطلب زینتہا، وکان فی زخارفہا من الراغبین۔ ولأجل ذلک ما فارق الکافرین المرتدین، بل دخل فیہم کالمداہنین،
    واختار التقیّۃ إلی مدۃ قریبۃ من ثلاثین۔ ثم لما کان الصدّیق الأکبر کافرا أو غاصبًا فی أعین علیّ المرتضی رضی اللّٰہ تعالی عنہ وأرضٰی، فلِمَ رضی بأن یُبایعہ؟ ولِمَ ما ہاجر من أرض الظلم والفتنۃ والارتداد
    إلی بلاد أخری؟ ألم تکن أرض اللّٰہ واسعۃ فیہاجر فیہا کما ہی سُنّۃ ذوی التقی؟ انظر إلی إبراہیم الذی وفّی۔ کیف کان فی شہادۃ الحق شدید القوی، فلما رأی أن أباہ ضلّ وغوی، ورأی القوم أنہم یعبدون
    الأصنام ویترکون الرب الأعلی، أعرض عنہم وما خاف وما بالٰی، وأُدخِل فی النار وأوذی من الأشرار، فما اختار التقیّۃ خوفا من الأشرار۔ فہذا ہی سیرۃ الأبرار، لا یخافون السیوف ولا السنان، ویحسبون التقیۃ
    من کبائر الإثم والفواحش
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 350
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 350
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/350/mode/1up
    والعدوان، وإن صدرت شمّۃٌ منہا کمثل ذلّۃ فیرجعون إلی اللّٰہ مستغفرین۔
    ونعجب من علي رضی اللّٰہ عنہ کیف بایع الصدّیقَ
    والفاروق، مع علمہ بأنہما قد کفرا وأضاعا الحقوق، ولبث فیہما عمرًا واتّبعہما إخلاصا وعقیدۃ، وما لغِب وما وہَن وما أری کراہۃ، وما اضمحلّت الداعیۃ، وما منعتہ التقاۃ الإیمانیۃ، مع أنہ کان مطّلعا علی
    فسادہم وکفرہم وارتدادہم، وما کان بینہ وبین أقوام العرب بابا مسدودًا وحجابا ممدودًا وما کان من المسجونین۔ وکان واجبا علیہ أن یُہاجر إلی بعض أطراف العرب والشرق والغرب ویحث الناس علی القتال
    ویہیج الأعراب للنضال، ویُسخرہم بفصاحۃ المقال ثم یقاتل قوما مرتدین۔
    وقد اجتمع علی المسیلمۃ الکذاب زہاء ماءۃ ألف من الأعراب، وکان علیٌّ أحقّ بہذہ النصرۃ، وأَولی لہذہ الہمۃ، فلِمَ اتّبع الکافرین،
    ووالی وقعد کالکسالی وما قام کالمجاہدین؟ فأیّ أمر منعہ من ہذا الخروج مع إمارات الإقبال والعروج؟ ولِمَ ما نہض للحرب والبأس وتأیید الحق ودعوۃ الناس؟ ألم یکن أفصح القوم وأبلغہم فی العظات ومن الذین
    ینفخون الروح فی الملفوظات؟ فما کان جمع الناس عندہ إلا فعل ساعۃ، بل أقلَّ منہا لقوۃ بلاغۃ وبراعۃ، وتأثیر جاذب للسامعین۔ ولما جمَعَ الناسَ الکاذبُ الدجالُ فکیف أسدُ اللّٰہ الذی کان مؤیِّدہ الرب الفعّال،
    وکان محبوبَ رب العالمین۔
    ثم من أعجب العجائب وأظہر الغرائب أنہ ما اکتفی علیٌّ أن یکون من المبایعین، بل صلّی خلف الشیخَین کل صلاۃ، وما تخلف فی وقت من أوقات، وما أعرض کالشاکین۔ ودخل فی
    شُوراہم وصدّق دعواہم، وأعانہم فی کل أمر بجہد ہمتہ وسعۃ طاقتہ، وما کان من المتخلفین۔ فانظر۔ أہذا من علامات الملہوفین المکفرین؟ وانظر کیف اتبع الکاذبین مع علمہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 351
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 351
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/351/mode/1up
    بالکذب والافتراء کأن الصدق والکذب کان عندہ کالسواء ۔ ألم یعلم أن الذین یتوکلون علی قدیر ذی القدرۃ لا یؤثرون طریق المداہنۃ
    طرفۃ عین ولو بالکراہۃ، ولا یترکون الصدق ولو أحرقہم الصدق وألقاہم إلی التہلکۃ وجعلہم عِضِین؟
    وإن الصدق مشرب الأولیاء ، ومن علامات الأصفیاء ، ولکن المرتضٰی ترک ہذہ السجیّۃ، ونحَت لنفسہ
    التقیّۃ، واتبع طریقا ذلیلا، وکان یحضر فِناء الکافرین بکرۃ وأصیلا، وکان من المادحین۔ وہلّا اقتدی بنبیّ الثقلین أو شجاعۃ الحُسین واتخذ طریق المحتالین؟ وأنشدک اللّٰہ أہذا من صفات الذین تطہرت قلوبہم من
    رجس الجبن والمداہنۃ، وأعطاہم إیمانُہم قوۃَ الجَنان والمہجۃ وزُکّوا من کل نفاق ومداہنۃ، وخافوا ربہم وفرغوا بعدہ من کل خشیۃ؟ کلا بل ہذہ الصفات توجد فی قوم آثروا الأہواء علی حضرۃ العزۃ، وقدّموا
    الدنیا علی الآخرۃ، وما قدروا اللّٰہ حق قدرہ، وماؔ استناروا مِن بدرہ، وما کانوا مخلصین۔ وإنی عاشرت الخواص والعوام، ورأیت کل طبقۃ من الأنام، ولکنی ما رأیت سیرۃ التقیۃ وإخفاء الحق والحقیقۃ إلا فی
    الذین لا یُبالون علاقۃ حضرۃ العزۃ۔ و واللّٰہ، لا ترضی نفسی لطرفۃ عین أن أداہن فی الدین ولو قُطعتُ بالسکین، وکذلک کل من ہداہ اللّٰہ فضلا ورحما، ورزق من الإخلاص رزقا حسنا، فلا یرضی بالنفاق وسیر
    المنافقین۔ أما قرأتَ قصۃ قوم اختاروا الموت علی حیاۃ المداہنۃ وما شاء وا أن یعیشوا طرفۃ عین بالتقیۃ وقالوا۔ ۱؂ فیا حسرۃ علی الشیعۃ إنہم اجترؤوا علی ذمّ المرتضی بما کان عندہم من منافرۃ للصدّیق
    الأتقی، وہفَتْ أحلامہم بتعصب أعمی۔ یتعامون مع المصباح المتّقد، ولا یتأملون تأمُّل المنتقد۔ وإنّی أری کلماتہم مجموعۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 352
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 352
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/352/mode/1up
    ریب، وملفوظاتہم رجم غیب، وما مسّہم ریح المحققین۔
    أیہا الناظر فی ہذا الکتاب إن کنتَ من عشاق الحق والصواب، فکفاک آیۃ
    الاستخلاف لتحصیل تریاق الحق ودفع الذعاف، فإن فیہا برہانا قویا للمنصفین۔ فلا تحسب الأخیار کأہل فساد، ولا تُلحق ہُودًا بِعَاد، وتَفکَّرْ لساعۃ کالمحققین۔ وأنت تعلم أن الأنباء المستقبلۃ من اللّٰہ الرحمان تکون
    کقضاۃ لقضایا أہل الحق وأہل العدوان، أو کجنود اللّٰہ لفتح بلاد البغی والطغیان، فتُفرِّج ضیق المشکلات بِکرّاتِہا، حتی یُری ما کان ضنکًا رحیبًا بقوۃ صلا تہا۔ فتبارز ہذہ الأنباءُُ کل مناضل برمح خضیب، حتی
    تقود إلی الیقین کل مرتاب ومریب، وتقطع معاذیر المعترضین۔ وکذلک وقعت آیۃ الاستخلاف، فإنہا تَدُعّ کل طاعن حتی ینثنی عن موقف الطعن والمصافّ، وتُظہر الحق علی الأعداء ولو کانوا کارہین۔ فإن الآیۃ
    تُبشر الناس بأیام الأمن والاطمئنان بعد زمن الخوف من أہل الاعتساف والعدوان، ولا یصلح لِمِصْداقیّتہا إلا خلافۃ الصدّیق کما لا یخفی علی أہل التحقیق۔ فإن خلافۃ علیّ المرتضٰی ما کان مصداق ہذا العروج
    والعُلی والفوز الأجلی، بل لم یزل تبتزّہا عِداہا ما فیہ من قوۃ وحِدّۃ مداہا، وأسقطوہا فی ہوّۃ وترکوا حق أُخوّۃ، حتی أصاروہا کبیتٍ أوہنَ من بیت العنکبوت، وترکوا أہلہا کالمتحیر المبہوت۔ ولا شک أن علیّا کان
    نُجعۃَ الرُوّاد وقدوۃ الأجواد، وحجۃ اللّٰہ علی العباد، وخیرَ الناس من أہل الزمان، ونورَ اللّٰہ لإنارۃ البلدان، ولکن أیام خلافتہ ما کان زمن الأمن والأمان، بل زمان صراصر الفتن والعدوان۔ وکان الناس یختلفون
    فی خلافتہ وخلافۃ ابن أبی سفیان، وکانوا ینتظرون إلیہما کحیران، وبعضہم حسبوہما کفَرْقَدَی سماءٍ وکزَنْدَینِ فی وِعاءٍ۔ والحق أن الحق کان مع المرتضی، ومَن قاتَلَہ فی وقتہ فبغی وطغی، ولکن خلافتہ ما کان
    مصداق الأمن المبشَّر بہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 353
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 353
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/353/mode/1up
    من الرحمٰن، بل أوذی المرتضی من الأقران، ودِیستْ خلافتہ تحت أنواع الفتن وأصناف الافتنان، وکان فضل اللّٰہ علیہ عظیما، ولکن
    عاش محزونا وألیما، وما قدر علی أن یشیع الدین ویرجم الشیاطین کالخلفاء الأولین، بل ما فرغ عن أسنّۃ القوم، ومُنع من کل القصد والرَّوْم۔ وما ألّبوہ بل أضبُّوا علی إکثار الجور، وما عَدَّوا عن الأذی بل زاحموہ
    وقعدوا فی المَور، وکان صبورا ومن الصالحین۔ فلا یمکن أن نجعل خلافتہ مصداق ہذہ البشارۃ، فإن خلافتہ کانت فی أیام الفساد والبغی والخسارۃ، وما ظہر الأمن فی ذلک الزمن، بل ظہر الخوف بعد الأمن،
    وبدأت الفتن، وتواترت المحن، وظہرت اختلالات فی نظام الإسلام، واختلافات فی أُمّۃ خیر الأنام، وفُتحت أبواب الفتن، وسُدِّدَ الحقد والضغن، وکان فی کل یوم جدید نزاعُ قوم جدید، وکثرت فتن الزمن، وطارت
    طیور الأمن، وکانت المفاسد ہائجۃ، والفتن مائجۃ، حتی قتل الحسین سید المظلومین۔
    ومن تظنّی أن الخلافۃ کان أمرًا روحانیا من اللّٰہ رب العالمین، وکان مصداقہ المرتضٰی من أول الحین، ولکنہ أنِف
    واستحی أن یُجادل قومًا ظالمین، فہذا عذر قبیح، وما یتلفظ بہ إلا وقیح۔ بل الحق الذی یجب أن یُقبَل والصدق الذی لزم أن یُتقبل أن مصداق نبأ الاستخلاف ہو الذی کان جامِعَ ہذہ الأوصاف، وثبت فیہ أنہ فتح علی
    المسلمین أبواب أمن وصواب، ونجّاہم من فتن وعذاب، وفلَّ عن الإسلام حدَّ کل ناب، وشمّر تشمیر من لا یألو جہدًا، وما لغب وما وہن حتی سوّی غورًا ونجدًا، وأعاد اللّٰہ علی یدیہ الأمن المفقود، والإقبال
    الموؤود، فکان الناس بعد خوفہم آمنین۔ والأنباء المستقبلۃ إذا ظہرت علی صورہا الظاہرۃ فصرفُہا إلی معنی آخر ظلمٌ وفسق بعد المشاہدۃ، فإن الظہور یشفی الصدور، ویہب
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 354
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 354
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/354/mode/1up
    الیقین ویلین الصخور، وإن فی فطرۃ الإنسان أنہ یُقدّم المشہود علی غیرہ من البیان، وہذا ہو المعیار لذوی العرفان۔ فانظُرْ مَن أماط
    عن الإسلام وعثاء ہ، وأعادہ إلی نضرتہ وأزال ضرّاء ہ، وأہلک المفسدین، وأباد المرتدین۔ ودعا إلی دین اللّٰہ کل فارّ، وأراہم الحق بأنوار، حتی اکتظت المساجد بالراجعین، وأحیا الأرض بعد موتہا بإذن رب
    العالمین، وأزال حُمّی الناس مع رحضاۂ، ورحض درن البغی مع خیلا ۂ بماء معین۔
    ورحم اللّٰہ الصدّیق، أحیا الإسلام وقتل الزنادیق، وفاض بمعروفہ إلی یوم الدین۔ وکان بَکّاءً ومن المتبتلین۔ وکان من عادتہ
    التضرع والدعاء والاطّراح بین یدی المولٰی والبکاء والتذلّل علی بابہ، والاعتصام بأعتابہ۔ وکان یجتہد فی الدعاء فی السجدۃ، ویبکی عند التلاوۃ، ولا شک أنہ فخر الإسلام والمرسلین۔ وکان جوہرہ قریبًا من جوہر
    خیر البریّۃ، وکان أول المستعدّین لقبول نفحات النبوۃ، وکان أول الذین رأوا حشرا روحانیا مِن حاشرٍ مثیلِ القیامۃ، وبدّلوا الجلابیب المتدنسۃ بالملاحف المطہرۃ، وضاہی الأنبیاء فی أکثر سیر النبیین۔
    ولا نجد
    فی القرآن ذکر أحد من دون ذکرہ قطعا ویقیناًإلا ظن الظانین، والظن لا یُغنی من الحق شیئا ولا یروی قومًا طالبین۔ ومن عاداہ فبینہ وبین الحق باب مسدود، لا ینفتح أبدًا إلا بعد رجوعہ إلی سیِّد الصدِّیقین۔ ولأجل
    ذلک لا نری فی الشیعۃ رجلا من الأولیاء ، ولا أحدًا من زمر الأتقیاء ، فإنہم علی أعمال غیر مرضیۃ عند اللّٰہ، وإنہم یُعادون الصالحین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 355
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 355
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/355/mode/1up
    کلام موجز فی فضائل أبی بکر الصّدیق رضی اللّٰہ عنہ وأرضاہ
    کان رضی اللّٰہ عنہ عارفا تامَّ المعرفۃ، حلیم الخلق رحیم الفطرۃ،
    وکان یعیش فی زیّ الانکسار والغربۃ، وکان کثیر العفو والشفقۃ والرحمۃ، وکان یُعرف بنور الجبہۃ۔ وکان شدید التعلق بالمصطفٰی، والتصقت روحہ بروح خیر الوری، وغشیہٗ من النور ما غشّی مقتداہ
    محبوب المولی، واختفی تحت شعشعان نورؔ الرسول وفیوضہ العظمی۔ وکان ممتازًا من سائر الناس فی فہم القرآن وفی محبۃ سید الرسل وفخر نوع الإنسان۔ ولما تجلی لہ النشأۃ الأخرویۃ والأسرار الإلہیۃ،
    نفَض التعلقات الدنیویۃ، ونبَذ العُلق الجسمانیۃ، وانصبغ بصبغ المحبوب، وترک کل مُراد للواحد المطلوب، وتجردت نفسہ عن کدورات الجسد، وتلونت بلون الحق الأحد، وغابت فی مرضاۃ ربّ العالمین۔ وإذا
    تمکن الحبُّ الصادق الإلہی من جمیع عروق نفسہ، وجذر قلبہ وذرات وجودہ، وظہرت أنوارہ فی أفعالہ وأقوالہ وقیامہ وقعودہ، سُمّی صدّیقًا وأُعطی علمًا غضا طریّا وعمیقا، من حضرۃ خیر الواہبین۔ فکان
    الصدق لہ ملکۃ مستقرۃ وعادۃ طبعیۃ، وبدئت فیہ آثارہ وأنوارہ فی کل قول وفعل، وحرکۃ وسکون، وحواس وأنفاس، وأُدخل فی المنعمین علیہم من رب السماوات والأرضین۔ وإنہ کان نُسخۃ إجمالیۃ من کتاب
    النبوۃ، وکان إمام أرباب الفضل والفتوۃ، ومن بقیۃ طین النبیین۔
    ولا تحسب قولنا ہذا نوعًا من المبالغۃ ولا من قبیل المسامحۃ والتجوز، ولا من فور عین المحبۃ، بل ہو الحقیقۃ التی ظہرت علیَّ من حضرۃ
    العزۃ۔ وکان مشربہ رضی اللّٰہ عنہ التوکل علی رب الأرباب، وقلۃ الالتفات إلی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 356
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 356
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/356/mode/1up
    الأسباب، وکان کظلٍ لرسولنا وسیدنا صلی اللّٰہ علیہ وسلم فی جمیع الآداب، وکانت لہ مناسبۃ أزلیۃ بحضرۃ خیر البریۃ، ولذلک
    حصل لہ من الفیض فی الساعۃ الواحدۃ ما لم یحصل للآخرین فی الأزمنۃ المتطاولۃ والأقطار المتباعدۃ۔ واعلم أن الفیوض لا تتوجہ إلی أحد إلا بالمناسبات، وکذلک جرت عادۃ اللّٰہ فی الکائنات، فالذی لم یُعطہ
    القسّام ذرۃ مناسبۃ بالأولیاء والأصفیاء ، فہذا الحرمان ہو الذی یُعبَّر بالشقوۃ والشقاوۃ عند حضرۃ الکبریاء ۔ والسعید الأتم الأکمل ہو الذی أحاط عادات الحبیب حتی ضاہاہ فی الألفاظ والکلمات والأسالیب۔
    والأشقیاء لا یفہمون ہذا الکمال کالأکمہ الذی لا یرٰی الألوان والأشکال، ولا حظ للشقی إلا من تجلیات العظموت والہیبۃ، فإن فطرتہ لا تری آیات الرحمۃ، ولا تشم ریح الجذبات والمحبۃ، ولا تدری ما المصافاۃ
    والصلاح، والأنس والانشراح، فإنہا ممتلءۃ بظلمات، فکیف تنزل بہا أنوار برکات؟ بل نفس الشقی تتموج تموُّجَ الریح العاصفۃ، وتشغلہ جذباتہا عن رؤیۃ الحق والحقیقۃ، فلا یجیء کأہل السعادۃ راغبا فی
    المعرفۃ۔ وأما الصدّیق فقد خُلق متوجّہا إلی مبدأ الفیضان، ومقبِلا علی رسول الرحمٰن، فلذلک کان أحق الناس بحلول صفات النبوۃ، وأولی بأن یکون خلیفۃ لحضرۃ خیر البریۃ، ویتحد مع متبوعہ ویوافقہ بأتم
    الوفاق، ویکون لہ مظہرًا فی جمیع الأخلاق والسیر والعادۃ وترک تعلقات الأنفس والآفاق، ولا یطرأ علیہ الانفکاک بالسیوف والأسنۃ، ویکون مستقرا علی تلک الحالۃ ولا یزعجہ شیء من المصائب والتخویفات
    واللوم واللعنۃ، ویکون الداخل فی جوہر روحہ صدقا وصفاء وثباتا واتقاء ، ولو ارتد العالم کلّہ لا یُبالیہم ولا یتأخر بل یقدم قدمہ کل حین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 357
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 357
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/357/mode/1up
    ولأجل ذلک قَفَّی اللّٰہ ذِکر الصدّیقین بعد النبیین، وقال ۔ ۱؂ وفی ذلک إشارات إلی الصدّیق وتفضیلہ علی الآخرین، فإن النبی صلی اللّٰہ
    علیہ وسلم ما سمی أحدًا من الصحابۃ صدّیقًا إلا إیاہ، لیُظہر مقامہ ورَیّاہ، فانظر کالمتدبرین۔ وفی الآیۃ إشارۃ عظیمۃ إلی مراتب الکمال وأہلہا لقوم سالکین۔ وإنا إذا تدبرنا ہذہ الآیۃ، وبلّغنا الفکر إلی النہایۃ،
    فانکشف أن ہذہ الآیۃ أکبر شواہد کمالات الصدّیق، وفیہا سرّ عمیق ینکشف علی کل من یتمایل علی التحقیق۔ فإن أبا بکر سُمّی صدّیقًا علی لسان الرسول المقبول، والفرقان أَلْحقَ الصدّیقین بالأنبیاء کما لا یخفی
    علی ذوی العقول، ولا نجد إطلاق ہذا اللقب والخطاب علی أحد من الأصحاب، فثبت فضیلۃ الصدّیق الأمین، فإن اسمہ ذُکر بعد النبیین۔ فانظر بالإنابۃ وفارِقْ غشاوۃ الاسترابۃ، فإن الأسرار الخفیۃ مطویّۃ فی
    إشارات القرآن، ومن قرأ القرآن فابتلع کل المعارف، ولو ما أحستہا بحاسۃٍ الوجدانُ۔ وتنکشف ہذہ الحقائق متجردۃً عن الألبسۃ علی نفوس ذوی العرفان، فإن أہل المعرفۃ یسقطون بحضرۃ العزۃ، فتمسّ روحہم
    دقائقَ لا تمسّہا أحدٌ من العالمین۔ فکلماتہم کلمات، ومن دونہا خرافات، ولکنہم یتکلمون بأعلی الإشارۃ حتی یتجاوزون نظر النظّارۃ، فیُکفّرہم کل غبی من عدم فہم العبارۃ۔ فإنہم قوم منقطعون لا یُشابہہم أحدٌ ولا
    یُشابہون أحدًا، ولا یعبدون إلا أحدًا، ولا ینظرون إلی المتلاعبین۔ کفَلہم اللّٰہ کرجل کفَل یتیما، ففوّضہ إلی مرضعۃ حتی صار فطیما، ثم ربّاہ وعلّمہ تعلیما، ثم جعلہ وارث ورثاۂ، ومنَّ علیہ منّا عظیما، فتبارک
    اللّٰہ خیر المحسنین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 358
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 358
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/358/mode/1up
    فی فضائل علی رضی اللّٰہ عنہ اللّٰہم والِ مَن والاہ وعادِ مَن عاداہ
    کان رضی اللّٰہ عنہ تقیًّا نقیًّا و مِن الذین ہم أحب الناس إلی
    الرحمان، ومِن نخب الجیل وسادات الزمان۔ أسد اللّٰہ الغالب وفتی اللّٰہ الحنّان، ندیّ الکف طیب الجنان۔ وکان شجاعا وحیدًا لا یُزایل مرکزہ فی المیدان ولو قابلہ فوج من أہل العدوان۔ أنفد العمر بعیش أنکد وبلغ
    النہایۃ فی زہادۃ نوع الإنسان۔ وکان أول الرجال فی إعطاء النشب وإماطۃ الشجب وتفقُّد الیتامی والمساکین والجیران۔ وکان یجلّی أنواع بسالۃ فی معارک وکان مظہر العجائب فی ہیجاء السیف والسنان۔ ومع ذلک
    کان عذب البیان فصیح اللسان۔ وکان یُدخل بیانہ فی جذر القلوب ویجلو بہ صدأ الأذہان، ویجلی مطلعہ بنور البرہان۔ وکان قادرًا علی أنواع الأسلوب، ومن ناضلہ فیہا فاعتذر إلیہ اعتذار المغلوب۔ وکان کاملا
    فی کل خیر وفی طرق البلاغۃ والفصاحۃ، ومن أنکر کمالہ فقد سلک مسلک الوقاحۃ۔ وکان یندب إلی مواساۃ المضطرّ، ویأمر بإطعام القانع والمعترّ، وکان من عباد اللّٰہ المقربین۔ ومع ذٰلک کان من السابقین فی
    ارتضاع کأس الفرقان، وأُعطَی لہ فہم عجیب لإدراک دقائق القرآن۔ وإنی رأیتہ وأنا یقظان لا فی المنام، فأعطانی تفسیر کتاب اللّٰہ العلام، وقال ھذا تفسیری، والآن أُولِیْتَ فَہُنّیتَ بما أُوتِیتَ۔ فبسطتُ یدی وأخذت
    التفسیر، وشکرت اللّٰہ المعطی القدیر۔ ووجدتُہ ذا خَلْقٍ قویم وخُلقٍ صمیم، ومتواضعا منکسرا ومتہلّلا منوّرا۔ وأقول حلفًا إنہ لاقانی حُبًّا وأُلْفًا، وأُلقی فی روعی أنہ یعرفنی وعقیدتی، ویعلم ما أخالف الشیعۃ فی
    مسلکی ومشربی، ولکن ما شمخ بأنفہ عُنفًا، وما نأی بجانبہ أنفًا، بل وافانی وصافانی کالمحبین المخلصین، وأظہر المحبۃ کالمصافین الصادقین۔ وکان معہ الحسین بل الحسنینِ وسید الرسل
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 359
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 359
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/359/mode/1up
    خاتم النبیین، وکانت معہم فتاۃ جمیلۃ صالحۃ جلیلۃ مبارکۃ مطہّرۃ معظّمۃ مُوَقرۃ باہرۃ السفور ظاہرۃ النور، ووجدتہا ممتلءۃ من
    الحزن ولکن کانت کاتمۃ، وأُلقی فی روعی أنہا الزہراء فاطمۃ۔ فجاء تنی وأنا مضطجع فقعدت ووضعت رأسی علی فخذہا وتلطفت، ورأیتُ أنہا لبعض أحزانی تحزن وتضجر وتتحنن وتقلق کأمّہات عند مصائب
    البنین۔ فعُلّمتُ أنی نزلتُ منہا بمنزلۃ الابن فی عُلَق الدّین، وخطر فی قلبی أن حزنہا إشارۃ إلی ما سأری ظلما من القوم وأہل الوطن والمعادین۔ ثم جائنی الحسنان، وکانا یبدئان المحبۃ کالإخوان، ووافیانی
    کالمواسین۔ وکان ہذا کشفًا من کشوف الیقظۃ، وقد مضت علیہ بُرْہۃ من سنین۔ ولی مناسبۃ لطیفۃ بعلیّ والحسین، ولا یعلم سرّہا إلا ربّ المشرقین والمغربین۔ وإنی أحبّ علیّا وابناہ، وأعادی من عاداہ، ومع ذٰلک
    لستُ من الجائرین المتعسفین۔ وما کان لی أن أعرض عما کشف اللّٰہ علیَّ، وما کنت من المعتدین۔ وإن لم تقبلوا فلی عملی ولکم عملکم، وسیحکم اللّٰہ بیننا وبینکم، وہو أحکم الحاکمین۔
    الباب الثانی
    فی
    المہدی الذی ہو آدم الأُمّۃ وخَاتَم الأئمۃ
    اعلموا أن اللّٰہ الذی خلق اللیل والنہار، وأبدأ الظلامات والأنوار، قد جرت عادتہ من قدیم الزمان وأوائل الأزمنۃ والأوان، أنہ لا یتوجّہ إلی إصلاح إلا بعد رؤیۃ کمال
    طلاح، وإذا بلغت الآفۃ مداہا، وانتہت البلیۃ إلی منتہاہا، فتتوجہ العنایۃ الإلٰہیۃ إلی إماطتہا، وإلی خلق شیء یکون سببا لإزالتہا۔ وأما مثلہ فیوجد فی العالم الجسمانی أمثلۃ واضحۃ ونظائر بینّۃ جلیّۃ للذی
    اعترتہ شبہۃ أو کان من الغافلین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 360
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 360
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/360/mode/1up
    فأکبر الأمثلۃ سُنۃ ربانیۃ توجد فی نزول الأمطار والمرابیع التی تنزل لتنضیر الزروع والأشجار، فإن المطر النافع لا ینزل إلّا فی
    أوقات الاضطرار، ویُعرف وقتہ عند شدۃ الحاجۃ وقرب الأخطار، فإذا الأرض یبست وہمدت، واصفر کل ما أنبتت وأخرجت، ومسّت الضرّاء أہلَہاؔ والمصائب نزلت وسقطت، وظن الناس أنہم أُہلکوا،
    والدواہی قربت ودنت، وما بقی فی الأضَی قطرۃ ماء ، والغدر نتنت، فیُغاثون الناسُ فی ہذا الوقت ویُحیی اللّٰہ الأرض بعد موتہا، وتری البلدۃ اہتزّت وربَتْ، وتری کل زرع أخرج الشطَأَ وکل الأرض اخضرّت
    ونضرت، وصار الناس بعد الخطرات آمنین۔
    وہذہ عادۃ مستمرۃ، وسُنۃ قدیمۃ، بل تزید الشدّۃ فی بعض الأوقات وتتجاوز حد المعمولات، وتری بلدۃ قد أمحلتْ ذاتَ العُوَیم، وما بقی من جَہام فضلا عن الغَیم،
    وما بقی بُلالۃ من الماء ولا عُلالۃ من ذخائر الشتاء ، وما نزلت قطرۃ من قطر مع طول أمد الانتظار، ولاحت آثار قہر القہار، وأحال الخوف صُورَ الناس، وغلب الخیب وظہر طیران الحواس، وصار الریف
    کأرض لیس فیہا غیر الہباء والغبار، وما بقی ورق من الأشجار، فضلا عن الأثمار، فیضطر الناس أشد الاضطرار، وکادوا أن یہلکوا من آثار الیأس والتبار؛ فتتوجہ إلیہم العنایۃ، ویدرکہم رحم اللّٰہ وتظہر
    الآیۃ، وتنضر أرضہم من الأمطار، ووجوہہم من کثرۃ الثمار، فیصبحون بفضل اللّٰہ مخصبین۔ ذلک مثل الذین أتت علیہم أیام الضلال، وحلّت بہم أسباب مضلّۃ حتی زاغوا عن محجّۃ ذی الجلال، فأدرکہم ذاتَ
    بکرۃ وابلٌ من مُزنِ رحمتہ، وبعث مجدد لإحیاء الدّین، فأخذ الظانّون ظنّ السوء یعتذرون إلی اللّٰہ ربّ العالمین۔
    وآخرون یکذّبونہ ویقولون ما أنزل اللّٰہ من شیء ، وإن أنت إلا من المفترین۔ فینزل الوابل تترًا
    حتی لا یُبقی من سوء الظن أثرا، فیرجع الراجعون
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 361
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 361
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/361/mode/1up
    إلی الحق متندمین۔ وأمّا الأشقیاء فما ینتفعون من وابل اللّٰہ شیئا، بل یزیدون بغیا وظلما وعسفا، وکانوا قومًا ظالمین۔ وما اغترفوا من
    ماء اللّٰہ وما شربوا، وما اغتسلوا وما توضأوا، وما کانوا أن یسقوا الحرث، وکانوا قوما محرومین، فما رأوا الحق لأنہم کانوا عمین، وإن فی ذٰلک لآیات لقوم مفکّرین۔ ومثل آخر لمرسل الخلاق وہو لیالی المحاق
    کما لا یخفی علی الممعِن الرمّاق وعلی المتدبرین۔ فإنہا لیال داجیۃ الظلم، فاحمۃ اللمم، تأتی بعد اللیالی المنیرۃ کالآفات الکبیرۃ، فإذا بلغ الظلام منتہاہ، وما بقی فی لیلؔ سناہ، فیعشو اللّٰہ أن یزیل الظلام
    المرکوم، ویبرز النیر المغموم، فیبدأ الہلال ویملأ أمنًا ونورًا اللیلَ المہال، وکذلک جرت سُنّتہ فی أمور الدّین۔ فیا حسرۃ علی أہل الشقاق، إنہم یحکمون بقرب الہلال عند مجیء لیالی المحاق، ویرقبونہ کالمشتاق،
    ولکنہم لا ینتظرون فی ظلام الدین ہلالًا ولو بلغ الظلام کمالا۔ فالحق والحق أقول إنہم قوم حمقی، وما أُعطی لہم من المعقول حظ أدنٰی، وما کانوا مستبصرین۔
    ہذا ما شہدتْ سُنّۃ اللّٰہ الجاریۃ لنوع الإنسان،
    وثبت أن اللّٰہ یُری مسالک الخلاص بعد أنواع المصائب والذوبان۔ فلما کان من عادات ذی الجلال والإکرام أنہ لا یترک عبادہ الضعفاء عند القحط العام فی الآلام، ولا یرید أن ینفکّ نظامٌ یتبعہ عطبُ الأجسام،
    فکیف یرضی بفکّ نظام فیہ موت الأرواح ونار جہنم للدوام؟ ثم إذا نظرنا فی القرآن فوجدناہ مؤیدًا لہذا البیان، وقد قال اللّٰہ تعالی ۱؂ وإن فی ذلک لبشری لکل من تزکّٰی، وإشارۃ إلٰی أن الناس إذا رأوا فی زمان
    ضرًّا وضیرًا، فیرون فی آخرَ نفعا وخیرا، ویرون رخاءًً بعد بلاء فی الدین والدنیا۔ وکذٰلک قال فی آیۃ أُخری لقوم یسترشدون۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 362
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 362
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/362/mode/1up
    ۱؂ فأَمعِنوا فیہ إن کنتم تفکرون۔
    فہذہ إشارۃ إلی بعث مجدد فی زمان مفسد کما یعلمہ العاقلون۔ ولا معنی لحفاظۃ القرآن من غیر
    حفاظۃ عطرہ عند شیوع نتن الطغیان، وإثباتہ فی القلوب عند ہبّ صراصر الطغیان، کما لا یخفی علی ذوی العرفان والمتدبرین۔
    وإثبات القرآن فی قلوب أہل الزمان لا یمکن إلا بتوسط رجل مُطہَّر من
    الأدناس، ومخصوص بتجدید الحواس، ومُنوَّر بنفخ الروح من رب الناس، فہو المہدی الذی یہدی من رب العالمین، ویأخذ العلم من لدنہ ویدعو الناس إلی طعام فیہ نجاۃ المدعوین۔ وإنما ہو کإناء فیہ أنواع غذاء
    ، من لبن سائغٍ وشِِواءٍ، أو ہو کنار شتاءٍ، وللمقرور أشہٰی أشیاء ، أو کصحفۃ من الغَربِ فیہا حلواء القند والضرب، فمن جاء ہ أکَل الخبیص، ومن أعرض فأُخذ ولا محیص، وسیلقی السعیر ولو ألقی المعاذیر۔
    فثبت أن وجود المہدیین عماد الدّین، وتنزل أنوارہم عند خروج الشیاطین، وتحیطہم کثیر من الزمر کہالات القمر۔ ولما کان أغلب أحوال المہدیین أنہم لا یظہرون إلا عند غلبۃ الضالین والمضلین، فسُمّوا بذلک
    الاسم إشارۃ إلی أن اللّٰہ ذا المجد والکرم طہّرہم من الذین فسقوا وکفروا، وأخرجہم بأیدیہ من الظلمات إلی النور، ومن الباطل إلی الحق الموفور، وجعلہم ورثاء علم النبوۃ وأعطاہم حظا منہ، ودقّق مدارکہم
    وعلّمہم من لدنہ، وہداہم سبلا ما کان لہم أن یعرفوا، وأراہم طرقا ما کان لہم أن ینظروا لولا أن أراہم اللّٰہ، ولذٰلک سُمّوا مہدیین۔
    وأما المہدی الموعود الذی ہو إمام آخر الزمان، ومنتظَر الظہور عند ہبّ سموم
    الطغیان، فاعلم أن تحت لفظ المہدی إشارات لطیفۃ إلی زمان الضلالۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 363
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 363
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/363/mode/1up
    لنوع الإنسان، وکأنّ اللّٰہ أشار بلفظ المہدی المخصوص بالہدایۃ إلی زمان لا تبقی فیہ أنوار الإیمان، وتسقط القلوب علی الدنیا الدنیّۃ
    ویترکون سبل الرحمن، وتأتی علی الناس زمان الشرک والفسق والإباحۃ والافتتان، ولا تبقی برکۃ فی سلاسل الإفادات والاستفادات، ویأخذ الناس یتحرکون إلی الارتدادات والجہلات، ویزید مرض الجہل
    والتعامی، مع شوقہم فی سیر المعامی والموامی، ویُعرضون عن الرشاد والسداد، ویرکنون إلی الفسق والفساد، وتطیر جراد الشقاوۃ علی أشجار نوع الإنسان، فلا تبقی ثمر ولا لدونۃ الأغصان۔ وتری أن الزمان
    من الصلاح قد خلا، والإیمان والعمل أجفلا، وطریق الرشد عُلِّق بثریّا السماء۔ فیذکر اللّٰہ مواعیدہ القدیمۃ عند نزول الضرّاء ، ویری ضعف الدین ظاہرًا من کل الأنحاء ، فیتوجّہ لیُطفئ نار الفتنۃ الصمّاء ، فیخلق
    رجلا کخلق آدم بیدَی الجلال والجمال، وینفخ فیہ روح الہدایۃ علی وجہ الکمال۔ فتارۃ یُسمیہ عیسٰی بما خلقہ کخلق ابن مریم لإتمام الحجۃ علی النصاری، وتارۃ یدعوہ باسم مہدی أمین بما ہو ہُدِیَ من ربہ
    للمسلمین الضالین، وأُخرجَ للمحجوبین منہم لیقودہم إلی رب العالمین۔ ہذا ہو الحق الذی فیہ تمترون، واللّٰہ یعلم وأنتم لا تعلمون۔ أحیا عبدًا من عبادہ لیدعو الناس إلی طرق رشادہ، فاقبلوا أو لا تقبلوا، إنہ فعل ما
    کان فاعلا۔ أأنتم تضحکون ولا تبکون، وتنظرون ولا تبصرون۔
    أیہاؔ الناس لا تغلوا فی أہوائکم، واتقوا اللّٰہ الذی إلیہ تُرجعون۔ ما لکم لا تقبلون حکمَ اللّٰہ وکنتم تنتظرون؟ شہدت السماء فلا تبالون، ونطقت
    الأرض فلا تفکّرون۔ وقالوا إنا لا نقبل إلا ما قرأنا فی آثارنا ولو کانت آثارہم مبدَّلۃ أو وضعہا الواضعون؟ أیہا الناس انظروا ہٰہنا وہُنا فاترکوا الدَخَن واقبلوا ما بان ودنا، ولا تتبعوا الظنون أیّہا المتقون۔ قد عدل
    اللّٰہ بیننا فلا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 364
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 364
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/364/mode/1up
    تعدلوا عن عدلہ، ولا ترکنوا إلی الشقاء أیّہا المسلمون۔ یا ذراری الصالحین۔ لا تکونوا فی یدَی إبلیس مرتہَنین، ما لکم لا تتطہرون۔
    واعلموا أن للّٰہ تدلّیات ونفحات، فإذا جاء وقت التدلّی الأعظم فإذا الناس یستیقظون، وکلّ نفس تتنبّہ عند ظہورہ إلا الفاسقون۔ ولکلّ تَدَلٍّی عنوانٌ وشأنٌ یعرفہ العارفون۔ وأعظم التدلیات یأتی بعلوم مناسبۃ لأہل
    الزمان، لیطفئ نائرۃ أہل الطغیان، فینکرہا الذین کانوا عاکفین علی أصنامہم فیسبّون ویکفرون، ولا یعلمون أنہا فایضۃ من السماء ، وأنہا شفاء للذین تَنفّروا من قول المخطئین الجاہلین وکانوا یتردّدون، فینزل اللّٰہ
    لہم علومًا ومعارف تناسب مفاسد الوقت فہم بہا یطمئنون، کأنہا ثمر غضٌّ طریٌّ وعین جاریۃ، فہم منہ یأکلون ومنہا یشربون۔
    فحاصل البیان أن المہدی الذی ہو مجدد الصلاح عند طوفان الطلاح، ومبلِّغ
    أحکام ربّ الناس إلی حد الإبساس، سُمّی مہدیًا موعودًا وإماما معہودًا وخلیفۃ اللّٰہ رب العالمین۔ والسر الکاشف فی ہذا الباب أن اللّٰہ قد وعد فی الکتاب أن فی آخر الأیام تنزل مصائب علی الإسلام، ویخرج قوم
    مفسدون ۱؂ فأشار فی قولہ أنہم یملکون کل خصب وجدب، ویحیطون علی کل البلدان والدیار، ویُفسدون فسادًا عاما فی جمیع الأقطار، وفی جمیع قبائل الأخیار والأشرار، ویضلّون الناس بأنواع الحیل وغوائل
    الزخرفۃ، ویلوّثون عرض الإسلام بأصناف الافتراء والتہمۃ، ویظہر من کل طرف ظلمۃٌ علی ظلمۃ، ویکاد الإسلام أن یزہق بتبعۃ، ویزید الضلال والزور والاحتیال، ویرحل الإیمان وتبقی الدعاوی والدلال، حتی
    یخفی علی الناس الصراط المستقیم، ویشتبہ علیہم المَہْیَع القدیم۔ لا ینتہجون محجّۃ الاہتداء ، وتزلّ أقدامہم وتغلب سلسلۃ الأہواء ، ویکون المسلمون کثیر التفرقۃ والعناد، ومنتشرین کانتشار الجراد
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 365
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 365
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/365/mode/1up
    لا تبقی معہم أنوار الإیمان وآثار العرفان، بل أکثرہم ینخرطون فی سلک البہائم أو الذیاب أو الثعبان، ویکونون عن الدین غافلین۔ وکل
    ذلک یکون من أثر یأجوج ومأجوج، ویشابہ الناس العضو المفلوج کأنہم کانوا میتین۔
    ففی تلک الأیام التی یموج فیہا بحر الموت والضلال، ویسقط الناس علی الدنیا الدنیّۃ ویعرضون عن اللّٰہ ذی الجلال،
    یخلق اللّٰہ عبدًا کخلقہ آدم من کمال القدرۃ والربوبیۃ، مِن غیر وسائل التعالیم الظاہریۃ، ویُسمّیہ آدم نظرا علی ہذہ النسبۃ، فإن اللّٰہ خلق آدم بیدیہ وعلّمہ الأسماء کلہا، ومنّ منًّا عظیمًا علیہ وجعلہ مہدیا،
    وجعلہ من المستبصرین۔
    وکذلک سماہ عیسٰی ابن مریم بالتصریح بما کان خلقہ وبعثہ کمثل المسیح، وبما کان سِرّہ کسرّہ المستور، وکانا فی علل الظہور من المتحدین۔ وتشابہت فتن زمنہما وصور
    إصلاحہما، وتشابہت قلوب أعداء الدین۔ فالعلامۃ العظمی لزمان المہدی ظلمۃ عظیمۃ من فتن قوم یأجوج ومأجوج إذا علوا فی الأرض وأکملوا العروج، وکانوا من کل حدب ناسلین۔* وفی اسم المہدی
    إشارات إلی ہذہ الفتن لقوم متفکرین۔ فإن اسم المہدی یدل علی أن الرجل المسمی بہ أُخرج من قوم ضالین، وأدرکہ ہُدی اللّٰہ ونجاہ من قوم فاسقین۔
    فلا شک أن ہذا الاسم یدل علی مفاسد الزمان بمُجمَلٍ مَطْویٍّ
    من البیان، ویذکر من زمن الظلمات ووقت الظلامات وأوان نزول الآفات
    * الحاشیۃ :۔ ھذہ ھی العلامۃ القطعیۃ لاٰخر الزمان و قرب القیامۃ کما جاء فی مسلم من خیر البریۃ قال قال رسول اللّٰہ صلعم تقوم
    القیامۃ والروم اکثر من سائر الناس و اراد من الروم النصاریٰ کما ھو مسلّم عند ذوی الادراس والاکیاس والمحدثین۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 366
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 366
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/366/mode/1up
    ویشیر إلی شوائب الدہر ونوائبہ، وغرائب القادر وعجائبہ من تأیید المستضعفین۔ ویدل بدلالۃ قطعیۃ علی أن المہدی لا یظہر إلا عند
    ظہور الفتن المبیدۃ والظلمات الشدیدۃ، فإذا کثر الضلال وزاد اللدد والجدال، وعدم العمل الصالح وبقی القیل والقال، فیقتضی ہذا الحال أن یہدی رجلا الربُّ الفعّال، وتتضرع الظلمۃ فی الحضرۃ لینزل نورٌ
    لتنویر المحجّۃ، فتنزل الملا ئکۃ والروح فی ہذہ اللیلۃ الحالکۃ بإذن رب ذی القدرۃ الکاملۃ، فیُجعَلُ رجل مہدیا ویُلقَی الروح علیہ، ویُنوَّر قلبہ وعینیہ، ویُعطَی لہ السؤدد والمکرمۃ موہبۃ، ویُجعَل لہ التقویٰ
    حلیۃ، ویُدخَل فی عباد اللّٰہ المنصورین۔ فإن البغی إذا بلغ إلی انتہاء ، فہذا ہو یومُ حکم وقضاء وفصل وإمضاء ، وعون وإعطاء ، ولو لا دفعُ اللّٰہ الطلاحَ بأہل الصلاح لفسدت الأرض ولسُدّت أبواب الفلاح ولہلک
    الناس کلہم أجمعین۔
    فلأجل ذلک جرت سُنۃ اللّٰہ أنہ لا یُظہِر لیلۃ لیلاء إلا ویُری بعدہا قمراء ، وإنہ جعل مع کل عسرٍ یُسرا، ومع کل ظلام نورا۔ ففکر فی ہذا النظام لیظہر علیک حقیقۃ المرام، وإن فی ذٰلک
    لآیات للمتوسّمین۔ واعلم أن ظلمۃ ہذا الزمان قد فاقت کل ظلمۃ بأنواع الطغیان، وطلعت علینا آثار مُخوفۃ وفتن مذیبۃ الجَنان، والکفار نسلوا من کل حدب کالسِّرحان ناہبین۔ فحان أن یُعان المسلمون ویُقوَّی
    المستضعفون، ویوہَن کید الدجّالین۔ ألم تمتلأ الأرض ظلاما، وسفہت النفوس أحلاما، ونحَت الناس أصناما، وغلب الکفر وحاق بہ الظفر وقلّ التخفّر، فزخرفوا الزور الکبیر وزیّنوا الدقاریر، وصالوا بکل ما کان
    عندہم من لطم، وما بقی علی کید من ختم، واتفق کل أہل الطلاح، وصاروا کالماء والراح، وطفق زمر الجہال یتبعون آثار الدجال، ومن یقبل مشرب ہذیانہم یکون خالصۃَ خُلصانہم۔ وواللّٰہ إن خباثتہم شدیدۃ، وأما
    حلمہم فمکیدۃ، بل ہو أحبولۃ من
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 367
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 367
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/367/mode/1up
    حبائل ختلہم، ورَسَنٌ استمر من فتلہم، وستعرفون دجالیّتہم متلہّفین۔
    وإنہم قوم تفور المکائد من لسانہم وعینیہم وأنفہم وأُذنیہم،
    ویدیہم وأصدریہم ورجلیہم ومِذروَیہم، وأری کل مضغۃ من أعضاۂم واثبۃ کالماکرین۔ فسد الزمان وعمّ الفسق والعدوان وتنصرت الدیار والبلدان؛ فاللّٰہ المستعان۔ والناس یُدلجون فی اللیلۃ اللیلاء ویعرضون عن
    الشمس والضیاء ، ویضیعون الإیمان للأہواء متعمدین۔ وأری القسیسین کالذی أکثبَہ قنصٌ، أو بدت لہ فرصٌ، وأجدہم بأنواع حیل قانصین۔
    ومن مکائدہم أنّہم یأسُون جراح الموہوص، ویرِیشون جناح المقصوص،
    لعلہم یُسخّرون قوما طامعین۔ یُرغّبون ضُلًّا بنَ ضُلٍّ، ویفرِضون لہ مِن کلِّ کثیرٍ وقُلٍّ، لعلہم یحبسونہ بغُلٍّ، ثم یُسقطونہ فی ہوّۃ الہالکین۔ یُبادرون إلی جبر الکسیر وفکّ الأسیر ومواساۃ الفقیر، بشرط أن یدخل فی
    دینہم الذی ہو وقود السعیر، ویرغّبونہم إلی بناتہم وأنواع لذاتہم لیغترّ الخَلق بجہلا تہم ویجعلوہم کأؔ نفسہم مفسدین۔ فالناس لا یرجعون إلیہم بأناجیل متلوّۃ، بل بخطبۃ مجلوّۃ أو بمال مجّان کالناہبین۔ ولا
    یتنصرون لأعتاب الرؤوف البَرّ، بل یہرولون لاحتلاب الدرّ لکی یکونوا متنعمین۔ وکذلک أشاعوا الضلالات ومدّوا أطنابہا، وفتحوا من کل جہۃ بابہا، وأعدّوا شہوات الأجوفَینِ ودعوا طُلابہا، فإذا یُسِّرَ لأحد منہم
    العقد، أو أُعطِیَ لہ النقد، وآمَنوہ مِن عیشٍ أنکَد، فکأَنْ قَدْ۔ وکذٰلک کانت فخُّ سِیَرہم، وشِباکُ حِیَلہم، ولأجلہا اصطفّ لدیہم زُمر من الکسالٰی، لا یعلمون إلا الأکل والشرب والدلال، ولا یوجد صغوُہم إلا إلی شرب
    المدام أو إلی الغِید وأطایب الطعام، فیعیشون قریر العین بوصال العِین ووصول العَین۔ وکذلک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 368
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 368
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/368/mode/1up
    لا یألوا القسیسون جُہدًا فی إضلال العوام، ویُنعمون علی الذین ہم کالأنعام، وینفُضون علیہم أیادیَ الإنعام، ویوطنونہم أمنع مقام من
    الإکرام، وتراہم مکبّین علی الحطام، کأنہم ہُنَیدۃ مِن راغیۃ، أو ثُلّۃ من ثاغیۃ۔ فہؤلاء ہم الدجال المعہود، فلیَسْرِ عنک إنکارک المردود۔ وإن ہذہ الأیام أیام اقتحام الظلام، وأظلال خیام یوم القیام، وإنا اغتمدنا اللیل
    واقتحمنا السیل مختبطین۔ وفی منازلنا طرق یضلّ بہا خفیر، ویحار فیہا نحریر، وخوّفَنا یومنا الصعب الشدید، ورأینا ما کنا منہ نحید، ولیس لنا ما یشجّع القلب المزء ود، ویحدو النِضْوَ المجہود إلا ربنا رب
    العالمین۔
    والناس قد استشرفوا تلفًا وامتلأوا حَزَنًا وأسفًا، ونسوا کل رزء سلَفَ وکل بلاء زلَفَ، ویستنشؤن ریح مُغیث ولا یجدون مِن غیر نتن خبیث، فہل بعد ہذا الشر شر أکبر منہ یُقال لہ الدجال؟ وقد انکشف
    الآثار وتبینت الأہوال، ورأینا حمارًا یجوبون علیہ البلدان، فیطِسّ بأخفافہ الظرّانَ، ویجعل سَنۃً کشہر عند ذوی العینین، ویجعل شہرا کیوم أو یومین، ویعجب المسافرین۔ إنہ مرکبٌ جوّاب لا تواہقہ رِکاب، ولا
    ثنیۃ ولا ناب، والسبل لہ جُدّدت، والأزمنۃ بظہورہ اقتربت، والعِشار عُطّلت، والصحف نُشرت،* والجبال دُکّت، والبحار فُجّرت، والنفوس زُوّجت، وجُعلت الأرؔ ض کأنہا
    * الحاشیۃ:۔ اعلم ان القراٰن
    مملو من الانباء المستقبلۃ والواقعات العظیمۃ الاٰتیۃ ویقتاد الناس الی السکینۃ والیقین۔ و عشارہ تخور لحمل السالکین فی کل زمان و اعشارہ تفور لتغذیۃ الجائعین فیؔ کل اوان و ھو شجرۃ طیبۃ یوتی اکلہ کل
    حین۔ و ذلّلت قطوفہ فی کل وقت للمجتنین۔ فما من زمن ما لہ من ثمر و لا تعطل شجرتہ کشجرۃ عِنبٍ و تمرٍ بل یُری ثمرا تہ فی کل امر و یطعم مستطعمین۔ و من اعظم معجزاتہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 369
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 369
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/369/mode/1up
    مطویّۃ ومزلف طرفیہا، وتُرکت القِلاص فلا یُسعی علیہا۔ ولیس ہذا محلّ إلباس، بل أرصدہ اللّٰہ لخیر الناس، ولو کان من صنع
    الدجّالین۔ فہذہ المراکب جاریۃ مذ مُدّۃ، ولیست سواہا قعدۃ، وفیہا آیات للمتفطنین۔
    فثبت من ہذا البیان أن ہذا ہو وقت ظہور المہدي ومسیح الزمان، فإن الضلالۃ قد عمّت، والأرض فسدت، وأنواع الفتن
    ظہرت، وکثرت غوائل المفسدین۔ وکل ما ذُکر فیؔ القرآن من علامات آخر الزمان فقد
    انہ لا یغادر واقعۃ من الواقعات۔ التی کانت مفیدۃ للناس او مضرۃ ولکن کانت من المعظمات کما قال عزّ وجلّ ’’
    ‘‘ ۱؂ و فی ھذا اشارۃ من رب علیم الی ان کل ما یفرق فی لیلۃ القدر من امر ذی بال فھو مکتوب فی القراٰن کتاب اللّٰہ ذی کل عظمۃ و جلال فانہ نزل فی لیلۃ القدر بنزول تام فبورک منہ اللیل باذن ربّ علّام
    فکلما یوجد من العجائب فی ھٰذہ اللیلۃ یوجد من برکات نزول ھٰذہ الصحف المبارکۃ فالقراٰن احقّ و اولٰی بھذہ الصفات فانہ مبدأ اول لھذہ البرکات و ما بورکت اللیلۃ الا بہ من ربّ الکائنات و لاجل ذالک یصف
    القراٰن نفسہ بأوصاف توجد فی لیلۃ القدر بل اللیلۃ کالھلال وھو کالبدر و ذٰلک مقام الشکر والفخر للمسلمین۔
    و انی نظرت مرارا فوجدت القراٰن بحرا زخّارا و قد عظمہ اللّٰہ انواعا واطوارا فما للمخالفین لا
    یرجون لہ وقارًا و انکروا عظمتہ انکارا ویتکؤن علی احادیث ما طھر وجھھا حق التطھیر و یترکون الحق الخالص للدقاریر ولا یخافون رب العالمین۔ واذا قیل لھم تعالوا الٰی کتاب سواء بیننا و بینکم لتخلصوا من
    الظلام و تفتح اعینکم قالوا کفٰی لنا ما سمعنا من اٰباء نا الاوّلین۔ اولو کان اٰباء ھم لا یعلمون شیئا من حقایق الدین و انی فکرت حق الفکر فوجدت فیہ کلؔ انواع الذکر و ما من رطب و لا یابس الا فی کتاب مبین۔ و
    من انباء ہ انہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 370
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 370
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/370/mode/1up
    بدت کلہا للناظرین۔
    والذین یرقبون ظہور المہدي من دیار العرب، أو من بلدۃ من بلاد الغرب، فقد أخطأوا خطأ کبیرًا وما کانوا
    مُصیبین۔ فإن بلاد العرب بلاد حفظہا اللّٰہ من الشرور والفتن ومفاسد کفار الزمن، ولا یُتوَقَّع ظہور الہادی إلا فی بلاد کثرت فیہا طوفان الضلال، وکذٰلک جرت سُنۃ اللّٰہ ذی الجلال۔ وإنا نری أن أرض الہند
    مخصوصۃ بأنواع الفساد، وفُتحت فیہا
    اخبر عن نشر الصحف فی اٰخر الزمان وکذٰلک ظھر الامر فی ھذا الاوان وقد بدت فی ھٰذا الزمن کتب مفقودۃ بل موؤدۃ حتی ان کثرتھا تعجب الناظرین۔ وظھرت کل
    وسایل الاشاعۃ والکتابۃ و لا بد من أن نقبل ھٰذا الأمر من غیر الاسترابۃ و ان کنت فی شک من ھٰذا فات نظیرہ من زمن الاوّلین۔
    و من انباء العلیم القھار انہ اخبر من تعطیل العشار و تفجیر البحار وتزویج
    الدیار فظھر کما اخبر فتبارک عالم غیوب السمٰوات والارضین۔ واخبر عن قوم ذوی خصب ینسلون من کل حدب ویعلون علوا کبیرًا۔ ویفسدون فی الارض فسادًا مبیرا فرئینا تلک القوم باعیننا ورئینا غلوھم وغلبتھم
    بلغت مشارق الارض و مغاربھا تکاد السمٰوات یتفطرن من مفاسدھم یلبسون الحق بالباطل و کانوا قوما دجّالین۔ اتخذوا الحلم والاطماع والتحریف المنّاع شبکۃ الاضلال واھلکوا خلقا کثیرا من ھذا التثلیث
    کالمغتال وکل من یقصد منھم طرق الغول الخبیث فلا بد لہ من ھذا التثلیث فیھلکون بعض الناس بالحلم المبنی علی الاختداع بانواع الاطماع و بعضًا اٰخر بظلام التحریف الذی ھو عدو الشعاع وکذلک یضلون
    الخلق متعمّدین۔ وما نفعھم حدیث الاب والابن و رُوح القدس و ان ھو الا الحدیث ولٰکن نفعہم ھٰذا التثلیث ففازوا المطالب بالخبث والرجس فعجبت لھم کیف ایدوا من روح القدس و نسلوا من کل حدب فرحین۔
    ولکل امر اجل فاذا جاء الاجل فلا ینفع الکایدین کیدھم ولا یطیقون قبل الصادقین۔منہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 371
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 371
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/371/mode/1up
    أبواب الارتداد، وکثر فیہا کل فسق وفجور، وظلم وزور، فلا شک أنہا محتاجۃ بأشدّ الحاجۃ إلی نصرۃ اللّٰہ ذی العزۃ والقدرۃ،
    ومجیءِ مہدیٍّ من حضرۃ العزّۃ۔ وواللّٰہ لا نری نظیر فساد الہند فی دیار أُخری، ولا فتنًا کفتن ہذہ النصاریٰ۔ وقد جاء فی الأحادیث الصحیحۃ أن الدجال یخرج من الدیار المشرقیۃ، والقرآن یشیر إلی ذلک
    بالقرائن البینۃ، فوجب أن نحکم بحسب ہذہ العلامات الثابتۃ البدیہۃ، ولا نتوجہ إلی إنکار المنکرین۔
    والذین یرقبون المہدی فی مکۃ أو المدینۃ فقد وقعوا فی الضلالۃ الصریحۃ۔ وکیف، واللّٰہُ کفل صیانۃ تلک
    البقاع المبارکۃ بالفضل الخاص والرحمۃ، ولا یدخل رعب الدجال فیہا، ولا یجد أہلہا ریح ہذہ الفتنۃ۔ فالبلاد التی یخرج فیہا الدجال أحق وأولی بأن یرحم أہلَہا الربُّ الفعال، ویبعث فیہم من کان نازلا بالأنوار
    السماویۃ کما خرج الدجال بالقوی الأرضیۃ کالشیاطین۔ وأما ما قیل أن المہدی مُختفٍ فی الغار فہذا قول لا أصل لہ عند ذوی الأبصار، وہو کمثل قولہم أن عیسٰی لم یمت بل رُفع بجسمہ إلی السماء ، وینزل عند
    خروج الدجال والفتنۃ الصمّاء ، مع أن القرآن یُخبر عن وفاتہ ببیان صریح مبین۔
    فالحق أن عیسی والإمام محمد أطرحا عنہما جلابیب أبدانہما وتوفاہما ربّہما وألحقَہما بالصّالحین، وما جعل اللّٰہ لعبد خُلدًا،
    وکل کانوا من الفانین۔ ولا تعجَب من أخبار ذُکر فیہا قصّۃ حیاۃ المسیح، ولا تلتفت إلی أقوال فیہا ذکر حیاۃ الإمام ولو بالتصریح، وإنہا استعارات وفیہا إشارات للمتوسّمین۔ والبیان الکاشف لہذہ الأسرار،
    والکلام الکامل الذی ہو رافع الأستار، أن للّٰہ عادۃ قدیمۃ وسُنّۃ مستمرۃ أنہ قد یُسمّی الموتی الصالحین أحیاء ، لیفہِّم بہ أعداءً أو یبشِّر بہ أصدقاءً ، أو یُکرم بہ بعض عبادہ المتقین، کما قال عزّ وجلّ فی الشہداء
    لا تحسبوہم أمواتا بل أحیاء ، ففی ہذا إیماء إلی أن الکافرین
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 372
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 372
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/372/mode/1up
    کانوا یفرحون بقتل المؤمنین وکانوا یقولون إنّا قتلناہم وإنا من الغالبین۔
    وکذٰلک کان بعض المسلمین محزونین بموت إخوانہم وخلانہم
    وآباۂم وأبناۂم مع أنہم قُتلوا فی سبیل ربّ العالمین، فسکّت اللّٰہ الکافرین المخذولین بذکر حیاۃ الشہداء ، وبشّر المؤمنین المحزونین أن أقاربہم من الأحیاء وأنہم لم یموتوا ولیسوا بمیتین۔ وما ذکر فی کتابہ المبین
    أن الحیاۃ حیاۃ روحانی ولیس کحیاۃ أہل الأرضین، بل أکد الحیاۃ المظنون بقولہ ۱؂ و ردَّ علی المنکرین۔
    فکیف تعجب من قول لم یمت عیسی، وقد جاء مثل ہذا القول لقوم لحقوا بالموتی وماتوا بالاتفاق، وقُتلوا
    بالإہریاق، ودُفنوا بالیقین۔ أما یکفی لک حیاۃ الشہداء بنص کتاب حضرۃ الکبریاء مع صحۃ واقعۃ الموت بغیر التماری والامتراء ، فأیّ فضل وخصوصیۃ لحیاۃ عیسی مع أن القرآن یسمّیہ المتوفَّی، فتدبَّرْ فإنک
    تُسأل عن کلّ خیانۃ ونفاق فی یوم الدین۔ یومئذ یتندّم المبطِل علی ما أصرّ، وعلی ما أعرض عنہ وفرّ، ولکن لا ینفع الندم إذ الوقت مضٰی ومرّ، وکذلک تطلع نار اللّٰہ علی أفئدۃ الکاذبین۔ فویل للمزورین الذین لا
    ینتہون عن تَزیُّدِہم بل یزیدون کل یوم وکل حین۔ وکفی لخیانتک أن تتبع بغیر تحقیق کل قول رقیق بلغ آذانک، وما تطہِّر من الجہلات جنانک، وتسقط علی کل خضراء الدِمَن، کأہل الأہواء ومُحبّی الفتن، ولا تفتّش
    الطیب کالطیبین۔
    وقد علمت أن إطلاق لفظ الأحیاء علی الأموات وإطلاق لفظ الحیاۃ علی الممات ثابت من النصوص القرآنیۃ والمحکمات الفرقانیۃ، کما لا یخفی علی المستطلعین الذین یتلون القرآن متدبّرین،
    ویصکّون أبوابہ مستفتحین۔ فینیر علیک مِن ہذہ الحقیقۃ الغرّاء اللیلُ الذی اکفہرَّ علی بعض العلماء
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 373
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 373
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/373/mode/1up
    حتی انثنوا مُحْقَوقفین بعدما کانوا مستقیمین۔
    ولعلّک تقول بعد ہذا البیان إنی فہمتُ حقیقۃ الحیاۃ کأہل العرفان، ولکن ما معنی النزول
    علی وجہ المعقول وعلی نہجٍ یطمئن قلوب الطالبین۔ فاعلم أنہ لفظ قد کثر استعمالہ فی القرآن، وأشار اللّٰہ الحمید فی مقامات شتّی من الفرقان أن کل حِبْرٍ وسِبْرٍ ینزل من السماء ، وما من شیء إلا ینال کمالَہ من
    العُلَی بإذن حضرۃ الکبریاء ، وتلتقط الأرض ما تنفض السماوات، ویصبّغ القرائح بتصبیغٍ من الفوق، فتُجعَل نفسٌ سعیدًا أو من الأشقیاء والمبعدین۔
    فالذین سُعدوا أو شقوا یُشابہ بعضہم بعضا، فیزیدون تشابہًا
    یومًا فیومًا، حتی یُظَنّ أنہم شیء واحد، کذٰلک جرت سُنۃ أحسن الخالقین۔ وإلیہ یشیر عزّ وجلّ بقولہ ۱؂ فلیتفکر من أُعطی قوی المتفکرین۔
    وقد یزید علی ہذا التشابہ شیء آخر بإذن اللّٰہ الذی ہو أکبر وأقدر،
    وہو أنہ قد یفسُد أُمّۃ نبیٍّ غایۃ الفساد، ویفتحون علی أنفسہم أبواب الارتداد، وتقتضی مصالح اللّٰہ وحِکمہ أن لا یعذّبہم ولا یُہلکہم بل یدعو إلی الحق ویرحم وہو أرحم الرّاحمین۔ فیفتح اللّٰہ عینَ نبیٍّ متوفّی کان
    أُرسِلَ إلی تلک القوم، فیصرف نظرہ إلیہم کأنہ استیقظ من النوم، ویجد فیہم ظلما وفسادا کبیرًا، وغُلوّا وضلالا مُبیرًا، ویری قلوبہم قد مُلِءَت ظلما وزورًا وفتنا وشرورًا، فیضجَر قلبہ، وتقلق مہجتہ، وتضطرّ
    روحہ وقریحتہ، ویعشو أن ینزل ویُصلح قومہ ویُفحمہم دلیلا، فلا یجد إلیہ سبیلا، فیُدرکہ تدبیر الحق ویجعلہ من الفائزین۔ ویخلق اللّٰہ مثیلا لہ یشابہ قلبُہ قلبَہ، وجوہرُہ جوہرَہ، ویُنزِل إراداتِ الممثَّل بہ علی
    المثیل، فیفرح الممثل بہ بتیسُّر ہذا السبیل، ویحسب نفسہ من النازلین، ویتیقن بتیقن تام
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 374
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 374
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/374/mode/1up
    قطعی أنہ نزل بقومہ، وفاز برَوْمہ، فلا یبقی لہ ہمٌّ بعدہ ویکون من المستبشرین۔
    فہذا ہو سرُّ نزول عیسی الذی ہم فیہ یختلفون۔ وختم
    اللّٰہ علی قلوبہم فلا یعرفون الأسرارولا یسألون۔ ومن تجرّدَ عن وسخ التعصبات وصُبِّغَ بأنوار التحقیقات، فلا یبقی لہ شک فی ہذہ النکات، ولا یکون من المرتابین۔ تلک قوم قد خلوا وذہبوا ورحلوا، فلا یرجعون إلی
    الدنیا ولا یذوقون موتَین إلا موتتہم الأولٰی، وتجد السُنۃ والکتاب شاہدَین علٰی ہذا البیان، ولکن بشرط التحقیق والإمعان وإمحاض النظر کالمنصفین۔
    وقد جاء فی بعض الآثار من نبی اللّٰہ المختار أنہ قال ’’لو
    لم یبق من الدنیا إلا یوم لطوّل اللّٰہ ذلک الیوم حتی یبعث فیہ رجلا منی أو مِن أہل بیتی، یواطئ اسمُہ اسمی واسمُ أبیہ اسمَ أبی‘‘۔ أخرجہ أبو داود الذی کان من أئمۃ المحدثین۔ فقولہ ’’منی‘‘ و ’’یواطئ
    اسمہ اسمی‘‘ إشارۃ لطیفۃ إلی بیاننا المذکور، ففکِّرْ کطالب النور ،إن کنتَ ترید أن تنکشف علیک حقیقۃ السر المستور، فلا تمرّ غاضَّ البصر کالظالمین۔ واعلم أن المراد من مواطأۃ الاسمین مواطأۃ روحانیۃ
    لا جسمانیۃ فانیۃ، فإن لکل رجل اسم فی حضرۃ الکبریاء ، ولا یموت حتی ینکشف سرّ اسمہ سعیدًا کان أو من الأشقیاء والضالین۔ وقد یتفق توارُدُ أسماء الظاؔ ہر کما فی ’’أحمد‘‘ و’’أحمد‘‘، ولکن
    الأمر الذی وجَدْنا أحقّ وأنشد، فہو أن الاتحاد اتحاد روحانی فی حقیقۃ الاسمین، کما لا یخفی علی عارفٍ ذی العینین۔ وقد کان مِن ہذا القبیل ما أُلہمتُ من الرب الجلیل وکتبتُہ فی کتابی البراہین، وہو أن ربی
    کلّمنی وخاطبنی وقال یَا أَحْمَدُ یَتِمُّ اسمُکَ، وَلا یَتِمُّ اسْمِی۔ فہذا ہو الاسم الذی یُعطَی للروحانیین، وإلیہ إشارۃ فی قولہ تعالی۔۱؂ أی علّمہ حقائق الأشیاء کلہا، وجعلہ عالما مجملًا مثیل العالمین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 375
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 375
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/375/mode/1up
    وأمّا توارد اسم الأبوین کما جاء فی حدیث نبیّ الثقلَین، فاعلم أنہ إشارۃ لطیفۃ إلی تطابُق السرَّین من خاتم النبیین۔ فإن أبا نبینا صلی
    اللّٰہ علیہ وسلم کان مستعدّا للأنوار فما اتفق حتی مضی من ہذہ الدار، وکان نورُ نبیّنا موّاجًا فی فطرتہ، ولکن ما ظہر فی صورتہ، واللّٰہ أعلم بسرّ حقیقتہ، وقد مضی کالمستورین۔ وکذلک تشابہَ أبُ المہدی أبَ
    الرسول المقبول، ففکِّرْ کذوی العقول، ولا تمش معرضا کالمستعجلین۔
    وأظن أن بعض الأئمۃ من أہل بیت النبوۃ، قد أُلہمَ من حضرۃ العزۃ، أن الإمام محمدًا قد اختفی فی الغار، وسوف یخرج فی آخر الزمان
    لقتل الکفار، وإعلاءِ کلمۃ الملۃ والدین۔ فہذا الخیال یُشابہ خیال صعود المسیح إلی السماء ونزولہ عند تموُّج الفتن الصمّاء ۔ والسرّ الذی یکشف الحقیقۃ ویبین الطریقۃ، ہو أن ہذہ الکلمات ومثلہا قد جرت علی
    ألسنۃ الملہَمین بطریق الاستعارات، فہی مملوّۃ من لطائف الإشارات، فکأنّ القبر الذی ہو بیت الأخیار بعد النقل من ہذا الدار، عُبِّرَ منہ بالغار وعُبِّرَ خروج المثیل المتحد طبعًا وجوہرًا بخروج الإمام من المغارۃ،
    وہذا کلہ علی سبیل الاستعارۃ۔ وہذہ المحاورات شائعۃ متعارفۃ فی کلام رب العالمین، ولا یخفی علی العارفین۔
    ألا تعرف کیف أنّب اللّٰہ یہود زمان خاتم النبیین، وخاطبہم وقال بقول صریح مبین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 376
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 376
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/376/mode/1up
    ہٰذا ما جاء فی القرآن وتقرأونہ فی کتاب اللّٰہ الفرقان، مع أن ظاہر صورۃ ہذا البیان یُخالف أصل الواقعۃ، وہذا أمر لا یختلف فیہ اثنان۔
    فإن اللّٰہ ما فَرَقَ بیہودِ زمانِ نبیِّنا بحرًا من البحار، وما أغرق آل فرعون أمام أعین تلک الأشرار، وما کانوا موجودین عند تلک الأخطار، وما اتخذوا العجل وما کانوا فی ذلک الوقت حاضرین، وما قالوا یا موسی لن
    نؤمن حتی نری اللّٰہ جہرۃ بل ما کان لہم فی زمان موسی أثرًا * وتذکرۃ، وکانوا معدومین۔ فکیف أخذتہم الصاعقۃ، وکیف بُعِثوا من بعد الموت وفارقوا الحِمام؟ وکیف ظلل اللّٰہ علیہم الغمام؟ وکیف أکلوا المن
    والسلوی، ونجّاہم اللّٰہ من البلوی، وما کانوا موجودین، بل وُلدُوا بعد قرون متطاولۃ وأزمنۃ بعیدۃ مبعدۃ، ولا تزر وازرۃ وزر أخرٰی، واللّٰہ لا یأخذ رجلا مکان رجل وہو أعدل العادلین۔ فالسرّ فیہ أن اللّٰہ أقامہم
    مقام آباۂم لمناسبۃٍ کانت فی آراۂم، وسماہم بتسمیۃ أسلافہم وجعلہم وُرثاء أوصافہم، وکذلک استمرت سُنۃ رب العالمین۔
    وإن کنت تزعم کالجہلۃ أن المراد من نزول عیسی نزولُ عیسی علیہ السلام فی
    الحقیقۃ فیعسُر علیک الأمر وتخطئ خطأ کبیرا فی الطریقۃ، فإن تَوفِّی عیسی ثابت بنص القرآن، ومعنی التوفّی قد انکشف من تفسیر نبی الإنس ونبی الجانّ، ولا مجال للتأویل فی ہذا البیان، فالنزول الذی ما فسّرہ
    خا تم النبیین بمعنی یفید القطع والیقین بل جاء إطلاقہ علی معان مختلفۃ فی القرآن وفی آثار فخر المرسلین، کیف یعارض لفظَ التوفّی الذی قد حصحص معناہ وظہر بقول
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 377
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 377
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/377/mode/1up
    النبی وابن العباس أنہ الإماتۃ ولیس ما سواہ؟ وما بقی فی معناہ شک ولا ریب للمؤمنین۔ وہل یستوی المتشابہات والبینات
    والمحکمات؟ کلا۔ لا تستوی أبدا، ولا یتبع المتشابہات إلا الذی فی قلبہ مرض ولیس من المطہّرین۔ فالتوفّی لفظ محکم قد صرح معناہ وظہر أنہ الإماتۃ لا سواہ، والنزول لفظ متشابہ ما توجّہَ إلی تفسیرہ خاتم
    الأنبیاء ، بل استعملہ فی المسافرین۔ومع ذلک إن کنتَ یصعب علیک ذکرُ مجدّد آخر الزمان باسم عیسی فی أحادیث نبیّ الإنس ونبی الجانّ ویغلب علیک الوہم عند تعمیم المعنی، فاعلم أن اسم عیسی جاء فی بعض
    الآثار بمعانٍ وسیعۃ عند العلماء الکبار، وکفاک حدیث ذکَرہ البخاری فی صحیحہ مع تشریحہ من العلامۃ الزمخشری وکمال تصریحہ، وہو أن کل بنی آدم یمسّہ الشیطان یوم ولدتْہ أُمُّہ إلا مریم وابنہا عیسٰی۔
    وہذا یُخالف نصَّ القرآنٌ ۱؂ وآیات أُخری، فقال الزمخشری إن المراد من عیسی وأُمِّہ کلُّ رجل تقیّ کان علی صفتہما وکان من المتقین المتورعین۔
    فانظر کیف سمّی کلَّ تقی عیسی، ثم انظر إلی إعراض
    المنکرین۔ وإن قُلتَ أنّ الشہادۃ واحدۃ ولا بدّ أن تزید علیہ شاہدًا أو شاہدۃً، فاسمعْ وما أخال أن تکون من السامعین۔ اقرأ کتاب ’’التیسیر بشرح الجامع الصغیر‘‘ للشیخ الإمام العامل والمحدث الفقیہ الکامل
    عبد الرؤوف المناوی رحمہ اللّٰہ تعالی وغفر لہ المساوی وجعلہ من المرحومین۔ إنہ ذکر ہذا الحدیث فی الکتاب المذکور وقال ما جاء فی الحدیث المزبور من ذکر عیسی وأُمّہ فالمراد ہما ومَن فی معناہما۔ فانظر
    بإمعان العینین کیف صرح بتعمیم ہذین الاسمین، فما لک لا تقبل قول المحققین۔
    وقد سمعتَ أن الإمام مالکًا وابن قیّم وابن تیمیّۃ والإمام
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 378
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 378
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/378/mode/1up
    البخاری وکثیرًا من أکابر الأئمۃ وفضلاء الأُمّۃ، کانوا مُقرّین بموت عیسٰی ومع ذلک کانوا یؤمنون بنزول عیسی الذی أخبر عنہ رسول
    اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ، وما أنکر أحدٌ ہذین الأمرین وما تکلم، وکانوا یُفوّضون التفاصیل إلی اللّٰہ ربّ العالمین، وما کانوا فی ہذا مجادلین۔ ثم خلف من بعدہم خلفٌ وسوادٌ أقلَفُ وفیجٌ أعوجُ وأجوفُ، یجادلون
    بغیر علم ویفرّقون، ولا یرکنون إلی سِلم ویکفرون عباد اللّٰہ المؤمنین۔
    فحاصل الکلام فی ہذا المقام أن اللّٰہ کان یعلم بعلمہ القدیم أن فی آخر الزمان یُعادی قوم النصاری صراط الدین القویم، ویصدّون عن سبل
    الرب الکریم، ویخرجون بإفک مبین۔ ومع ذلک کانؔ یعلم أن فی ہذا الزمان یترک المسلمون نفائس تعلیم الفرقان، ویتبعون زخارف بدعات ما ثبتت من الفرقان، وینبذون أمورًا تُعین الدین وتحبّر حلل المؤمنین۔
    وتسقطون* فی ہوۃ محدثات الأمور وأنواع الأہواء والشرور، ولا یبقی لہم صدق ولا دیانۃ ولا دین، فقدر فضلا ورحمۃ أن یرسِل فی ہذا الزمان رجلًا یُصلح نوعَی أہل الطغیان، ویتم حجۃ اللّٰہ علی المبطلین۔
    فاقتضی تدبیرہ الحق أن یجعل المرسَلَ سَمِیَّ عیسٰی لإصلاح المتنصرین، ویجعلہ سَمِیَّ أحمدَؐ لتربیۃ المسلمین، ویجعلہ حاذیًا حذوَہما وقافیًا خطوَہما، فسماہ بالاسمین المذکورین، وسقاہ من الراحَین، وجعلہ دافِعَ
    ہمِّ المؤمنین ورافِعَ فتن المسیحیین۔ فہو عند اللّٰہ عیسٰی من جہۃ، وأحمدُ من جہۃ، فاترُکِ السبل الأخیاف وتجنَّبِ الخلاف والاعتساف، واقبل الحق ولا تکن کالضنین۔ والنبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم کما وصفہ
    بصفات المسیح حتی سماہ عیسی، کذلک وصفہ بصفات ذاتہ الشریف حتی سماہ أحمد ومشابہًا بالمصطفی، فاعلم أن ہذین الاسمین قد حصلا لہ باعتبار توجہ التام إلی الفرقتین، فسماہ أہل السماء عیسٰی باعتبار
    توجُّہہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 379
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 379
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/379/mode/1up
    وتألمہ کمُواسی الأساری إلی إصلاح فرق النصاری، وسمَّوہ بأحمد باعتبار توجّہہ إلی أُمّۃ النبی توجّہًا أشد وأزید، وتألّمِہ من سوء
    اختلافہم وعیشہم أنکد۔ فاعلم أن عیسٰی الموعود أحمد، وأن أحمد الموعود عیسٰی، فلا تنبذ وراء ظہرک ہذا السرّ الأجلی۔ ألا تنظر إلی المفاسد الداخلیۃ وما نالنا من الأقوام النصرانیۃ؟ ألست تریٰ أن قومنا قد
    أفسدوا طرق الصلاح والدین، واتبعوا أکثرہم سبل الشیاطین، حتی صار علمہم کنار الحُباحِب، وحِبرہم کسراب السُباسِب، وصار تطبُّعُ الشرِّ طِباعًا، والتکلّفُ لہ ہوًی طباعًا، وأکبّوا علی الدنیا متشاجرین؟
    یأبر
    بعضہم بعضا کالعقارب ولو کان المظلوم من الأقارب، وما بقی فیہم صدق الحدیث وإمحاض المصافات، وبدلّوا الحسنات بالسیئات۔ اشتغلوا فی تطلُّب مثالب الإخوان ونسوا إصلاح ذات البین وحقوق أہل الإیمان،
    وصالوا علی الإخوۃ کصول أہل العدوان۔ أدحضوا المودّات وأزالوا خلوص النیّات، وأشاعوا فیہم الفسق والعدوان، واتبعوا العثرات والبہتان۔ زالت نفحات المحبۃ کل الزوال، وہبّت ریاح النفاق والجدال۔ ما بقی
    سعۃ الصدر وصفاء الجنان، ودخلت کدوراتٌ فی الإیمان، وتجاوزوا حدود التورع والتقاۃ ، وتناسوا حقوق الإخوان والمؤمنین والمؤمنات۔ لا یتحامَون العقوق ولا یؤدّون الحقوق، وأکثرہم لا یعلمون إلا الفسق
    والنہات، وتغیَّرَ الزمان فلا ورع ولا تقویٰ ولا صوم ولا صلاۃ۔ قدّموا الدنیا علی الآخرۃ، وقدّموا شہوات النفس علی حضرۃ العزۃ، وأراہم لدنیاہم کالمصاب، ولا یبالون طرق الآخرۃ ولا یقصدون طریق الصواب۔
    ذہب الوفاء وفقد الحیاء ، ولا یعلمون ما الاتقاء ۔ أری وجوہًا تلمع فیہم أسرّۃ الغَدر، یحبّون اللیل* اللیلاء ویبزُقون علی البدر۔ یقرأون القرآن، ویترکون
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 380
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 380
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/380/mode/1up
    الرحمان۔ لا یری منہم جارُہم إلا الجَور، ولا شریکُ حدبہم إلا الغَور، یأکلون الضعفاء ویطلبون الکَور۔ کثُر الکاذبون والنمّامون،
    والواشون والمغتابون، والظالمون المغتالون، والزانون الفاجرون، والشاربون المذنبون، والخائنون الغدّارون، والمایلون المرتشون۔ قست القلوب والسجایا، لا یخافون اللّٰہ ولا یذکرون المنایا۔ یأکلون کما یأکل
    الأنعام، ولا یعلمون ما الإسلام۔ وغمرتہم شہوات الدنیا، فلہا یتحرکون ولہا یسکنون، وفیہا ینامون وفیہا یستیقظون۔ وأہل الثراء منہم غریقون فی النعم ویأکلون کالنَّعم، وأہل البلاء یبکون لفقد النعیم أو من ضغطۃ
    الغریم، فنشکوا إلی اللّٰہ الکریم، ولا حول ولا قوۃ إلا باللّٰہ النصیر المعین۔
    وأما مفاسد النصاری فلا تُعدّ ولا تُحصی، وقد ذکرنا شطرا منہا فی أوراقنا الأولٰی۔ فلما رأی اللّٰہ سبحانہ أن المفاسد فارت من
    الخارج والداخل فی ہذا الزمان، اقتضت حکمتہ ورحمتہ أن یُصلح ہذہ المفاسد برجُل لہ قَدمان قدمٌ علی قدم عیسی، وقدم علی قدم أحمدن المصطفٰی۔ وکان ہذا الرجل فانیا فی القدمین حتی سُمّی بالاسمین۔ فخذوا ہذہ
    المعرفۃ الدقیقۃ، ولا تخالفوا الطریقۃ، ولا تکونوا أول المنکرین۔ وإن ہذا ہو الحق وربِّ الکعبۃ، وباطل ما یزعم أہل التشیع والسُنۃ۔ فلا تعجلوا علیّ، واطلبوا الہدی من حضرۃ العزۃ، وأْتونی طالبین۔ فإن تُعرضوا
    ولا تقبلوا، فتعالوا ندع أبناء نا وأبناء کم، ونساء نا ونساء کم، ثم نبتہل فنجعل لعنۃ اللّٰہ علی الکاذبین۔
    وہذا ہو الحق الذی کشف اللّٰہ علیّ بفضلہ العظیم وفیضہ القدیم۔ وقد تُوفّی عیسی، واللّٰہ یعلم أنہ المتوفَّی۔
    وتُوفِّی إمامکم محمدن الذی ترقبونہ، وقائمُ الوقتِ الذی تنتظرونہ۔ وأُلہمتُ منؔ ربی أنی أنا المسیح الموعود وأحمدن المسعود۔ أتعجبون ولا تفکّرون فی سُنن اللّٰہ، وتنکرون ولا تخافون؟ وحصحص الحق وأنتم
    تعرضون
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 381
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 381
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/381/mode/1up
    و جاء الوقت وأنتم تبعدون۔ ومن سُنن اللّٰہ القدیم المستمرۃ الموجودۃ إلی ہذا الزمان التی لم تنکرہا* أحد من الجہلاء وذوی العرفان،
    أنہ قد یذکر شیءًا أو رجُلا فی أنباۂ المستقبلۃ، ویرید منہ شیءًا آخر أو رجُلا آخر فی الإرادۃ الأزلیۃ۔ وربما نری فی منام أن رجلا جاء من مقام فلا یجیء مَن رأیناہ بل یجیء مَن ضاہاہ فی بعض الصفات أو
    شابہَہ فی الحسنات أو السیئات۔ وأقص علیک قصۃً عجیبۃً وحکایۃً غریبۃً إن لی کان ابنا صغیرًا وکان اسمہ بشیرًا، فتوفاہ اللّٰہ فی أیام الرضاع، واللّٰہ خیر وأبقی للذین آثروا سبل التقوی والارتیاع۔ فأُلہمتُ من
    ربی إنا نردّہ إلیک تفضلًا علیک۔ وکذلک رأت أُمُّہ فی رؤیاہا أن البشیر قد جاء ، وقال إنی أعانقک أشد المعانقۃ ولا أفارق بالسرعۃ۔ فأعطانی اللّٰہ بعدہ ابنا آخر وہو خیر المعطین۔ فعلمتُ أنہ ہو البشیر وقد صدق
    الخبیر، فسمّیتہ باسمہ، وأری حُلْیۃ الأول فی جسمہ۔ فثبتت عادۃ اللّٰہ برأی العَین، أنہ قد یجعل شریکَ اسمٍ رجلَین۔ وأما جعلُ البعض سَمِیَّ بعضٍ فہی أسرار لتکمیل غرض لا یعلمہا إلا مُہجۃ العارفین۔
    ولی صدیقٌ أحبُّ الأصدقاء وأصدق الأحبّاء ، الفاضل العلامۃ والنحریر الفہّامۃ، عالمُ رموز الکتاب المبین، عارفُ علوم الحِکم والدّین، واسمہ کصفاتہ المولوی الحکیم نور الدین۔ فاتفق فی ہذہ الأیام من قضاء
    اللّٰہ الحکیم العلام أن ابنہ الصغیر الأحد، الذی کان اسمہ محمد أحمد، مات بمرض الحصبۃ، فصبر ووافق ربَّہ ذا الحکمۃ والقدرۃ والرحمۃ، فرآہ رجل فی لیلۃ وفاتہ بعد مماتہ کأنہ یقول لا تحزنوا لہذہ الفرقۃ،
    فإنی أذہب لبعض الضرورۃ، وسأرجع إلیکم بقدم السرعۃ۔ وہذا یدل علی أنہ سیُعطی ابنا آخر، فیُضاہی الثانی الغابرَ۔ واللّٰہ قادر علی کل شیء ، ولکن أکثر الناس
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 382
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 382
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/382/mode/1up
    لا یعلمون شؤون أحسن الخالقین۔
    وکذٰلک فی ہذا الباب قصص کثیرۃ وشہادات کبیرۃ وقد ترکناہا خوفا من طول الکلام، وکثیرۃ منہا
    مکتوبۃ فی کتب تعبیر المنام، فارجع إلیہا إن کنتَ من الشاکّین۔ وکیف تشکّ وإن الأخبار تواترت فی ہذا الباب؟ ولعلک تکون أیضًا من المشاہدین لہذا العجاب۔ فما ظنک۔ أتعتقد أن رجلًا متوفّی إذا رآہ أحد فی المنام،
    أو أخبر عنہ فی الإلہام، وقال المتوفی إنی سأرجع إلی الدنیا وأُلاقی القربی، فہل ہو راجع علی وجہ الحقیقۃ۔ أو لہذا القول تأویل عند أہل الطریقۃ؟ فإن کنتم مؤوِّلین فی ہذا المقام، فما لکم لا تؤوّلون فی أنباء
    تُشابہہا بالوجہ التام؟ أتُفرّقون بین سُنن اللّٰہ یا معشر الغافلین؟ فتدبّرْ وما أخال أن تتدبّر إلا أن یشاء ربی ہادی الضالین۔
    وقد عرفت أن علامات ظہور المسیح الذی ہو المہدی قد ظہرت، والفتن کثرت
    وعمّت، والمفاسد غلبت وہاجت وماجت، ویسبّون خیر البشر فی السکک والأسواق، وماتت الملۃ والتفّت الساق بالساق، وجاء وقت الفراق، فارحموا الدّین المُہان، فإنہ یرحل الآن۔ ونشدتکم اللّٰہ۔ ألا ترون ہذہ
    المفاسد بالعین؟ ألا یُترک عینُ زلالِ الإیمان للعَین؟ اشہدوا للّٰہ اشہدوا۔ أحقٌّ ہذا أو من المَین؟ وما زاوَلْنا أشدَّ مِن کید النصاری، وإنا فی أیدیہم کالأساری۔ إذا أرادوا التلبیس، فیُخجلون إبلیس۔ ظہر البأس،
    وحصحص الیأس۔ وقست قلوب الناس، واتبعوا وساوس الوسواس۔ وبعدوا عن التقوی، وخوف اللّٰہ الأعلٰی، بل عادَوا ہذا النمط، وضاہَوا السقط۔ وقلتُ قلیلا مما رأیتُ وما استقصیت۔ وواللّٰہ إن المصائب بلغت
    منتہاہا، وما بقی من الملۃ إلا رسمہا ودعواہا، وأحاطت الظلمات وعدم سناہا، ووطِئ زروعَنا الأوابد، فما بقی ماؤہا ومرعاہا، وکاد الناس أن یہلکوا من سیل الفتن
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 383
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 383
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/383/mode/1up
    وطغواہا، فأُعطیتُ سفینۃً من ربی، وبسم اللّٰہ مجریہا ومرساہا۔ وتفصیل ذلک أن اللّٰہ وجد فی ہذا الزمان ضلالات النصاریٰ مع أنواع
    الطغیان، ورأی أنہم ضلّوا وأضلّوا خلقا کثیرا، وعلَوا عُلوًّا کبیرا، وأکثروا الفساد، وأشاعوا الارتداد، وصالوا علی الشریعۃ الغرّاء ، وفتحوا أبواب المعاصی والأہواء ، ففارت غیرۃ اللّٰہ ذی الکبریاء عند ہذہ
    الفتنۃ الصمّاء ۔ ومع ذلک کانت فتنۃ داخلیۃ فی المسلمین، ومزّقوا باختلافاتٍ دینَ سید المرسلین، وصال بعضہم علی البعض کالمفسدین۔ فاختارنی اللّٰہ لرفع اختلافہم، وجعلنی حَکَما قاضیا لإنصافہم۔ فأنا الإمام
    الآتی علی قدم المصطفٰی للمؤمنین، وأنا المسیح متمم الحجۃ علی النصاری والمتنصرین۔
    وجمع اللّٰہ فی وجودی الاسمَین کما اجتمعت فی زمانی نار الفتنتَین، وہذا ہوؔ الحق وبالذی خلَق الکونَین۔ فجئتُ لأشیع
    أنوار برکاتہ، واختارنی ربی لمیقاتہ۔ وما کنتُ أن أردّ فضل اللّٰہ الکریم، وما کان لی أن أخالف مرضاۃ الرب الرحیم۔ وما أنا إلا کالمیت فی یدَی الغسّال، وأُقلَّبُ کلَّ طرفۃ بتقلیب الفعّال، وجئتُ عند کثرۃ بدعات
    المسلمین ومفاسد المسیحیین۔ وإن کنتَ فی شک فانظر بإمعان النظر کالمحقق الأریب، فی فتنِ بدعاتِ قومنا وجہلاتِ عبَدۃ الصلیب۔ أما تری فتنًا متوالیۃ؟ أسمعتَ نظیرہا فی قرون خالیۃ؟ فما لک لا تفکّر
    کالعاقلین، ولا تنظر کالمنصفین؟ وإن اللّٰہ یبعث علی کل رأس ماءۃ مجدّدَ الدّین، وکذلک جرت سُنۃ اللّٰہ المعین۔ أتظن أنہ ما أرسل عند ہذا الطوفان رجلا من ذوی العرفان، ولا تخاف اللّٰہ آخِذَ المجرمین؟
    قد
    انقضت علی رأس الماءۃ إحدی عشر سنۃ فما نظرتَ، وانکسفت الشمس والقمر فما فکّرتَ، وظہرت الآیات فما تذکّرت، وتبینت الأمارات فما وقّرت، أأنت تنام أو کنتَ من المعرضین؟ أتقول لِمَ ما فعل الفعّال
    کما
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 384
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 384
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/384/mode/1up
    کنتُ أخال؟ وکذلک زعم الذین خلوا من قبلک من الیہود، وما آمنوا بخیر الرسل وحبیب رب* المعبود، وقالوا ! یخرج منا خاتم
    الأنبیاء الموعود، وکذلک کان وعد ربنا بداوٗد، وقالوا إن عیسی لا یأتی إلا بعد نزول إیلیا من السماء۔ فکفروا بمحمد خیر الرسل وعیسی الذی کان من الأنبیاء ، وختم اللّٰہ علی قلوبہم فما فہموا الحقیقۃ، وما
    کانوا متدبّرین۔ وقست قلوبہم ونحتوا الدقاریر، حتی صاروا قردۃ وخنازیر، وکذلک یکون مآل تکذیب الصادقین۔ وإنہم کانوا علماء أحزابہم وأئمۃ کلابہم، وکانوا فقہاء ومحدثین وفضلاء ومفسّرین، وکان أکثرہم من
    الراہبین۔ فلما زاغوا أزاغ اللّٰہ قلوبہم، وما نفعہم علمُہم ولا نُخْرُوبُہم، وکانوا قوما فاسقین۔
    فلا تُفرِطوا بجنب اللّٰہ ولیکن فیکم رفق وحلم، ولا تقْفُوا ما لیس لکم بہ علم، ولا تغلُوا ولا تعتدوا، ولا تعثوا فی
    الأرض ولا تفسدوا، واخشوا اللّٰہ إن کنتم متقین۔ قد سمعتم سُنّۃ تسمیۃ البعض بأسماء البعض، فلا تترکوا السُنن الثابتۃ من اللّٰہ القدیر، لأوہام لیس لہا عندکم من برہان ونظیر، وإن کنتم تُصرّون علیہا ولا
    تُعرضون عنہا فأنبؤنا بنظائر علی تلک السُنۃ إن کنتم صادقین۔ ولن تقدروا أن تأتوا بنظیر، فلا تبرزوا لحرب الرب القدیر، ولا تردّوا النعمۃ بعد نزولہا، ولا تدُعّوا الفضل بعدؔ حلولہا، ولا تکونوا أوّل
    المعرضین۔
    وإن کنتم فی شک من أمری، ولا تنظرون نور قمری، وتزعمون أن المہدی الموعود والإمام المسعود یخرج من بنی فاطمۃ لإطفاء فتن حاطمۃ، ولا یکون من قوم آخرین، فاعلموا أن ہذا وہم لا أصل
    لہ، وسہم لا نصل لہ، وقد اختلف القوم فیہ، کما لا یخفی علی عارفیہ، وعلی کمل المحدثین۔ وجاء فی بعض الروایات أن المہدی صاحب الآیات مِن وُلْدِ العبّاس، وجاء فی البعض أنّہ منّا أی مِن خیر الناس، وفی
    البعض أنہ من وُلْد
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 385
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 385
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/385/mode/1up
    الحسن أو الحسین ، فالاختلاف لا یخفی علی ذوی العینین۔ وقد قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم إن سلمان منا أہل البیت، مع أنہ
    ما کان من أہل البیت، بل کان من الفارسیّین۔
    ثم اعلم أن أمر النسب والأقوام أمر لا یعلم حقیقتہ إلا علمُ العلام، والرؤیا التی کتبتُہا فی ذکر الزہراء تدل علی کمال تعلُّقی، واللّٰہُ أعلم بحقیقۃ الأشیاء۔ وفی کتاب
    ’’التیسیر‘‘ عن أبی ہریرۃ مَن أسلم من أہل فارس فہو قرشی۔ وأنا من الفارس کما أنبأنی ربی، فتفکر فی ہذا ولا تعجل کالمتعصبین۔ ثم الأصول المحکم والأصل الأعظم أن یُنظَر إلی العلامات ویُقدَّمَ البینات
    علی الظنیات، فإن کنت ترجع إلی ہذہ الأصول فعلیک أن تتدبّر بالنہج المعقول لیہدیک اللّٰہ إلی حق مبین، وہو أن النصوص القرآنیۃ والحدیثیۃ قد اتفقت علی أن اللّٰہ ذا القدرۃ قسّم زمان ہذہ الأمۃ بحکمۃ منہ
    ورحمۃ علی ثلاثۃ أزمنۃ، وسلّمہ العلماء کلہم من غیر مِرْیۃ۔ فالزمان الأوّل ہو زمانٌ أوّلُ من القرون الثلاثۃ مِن بُدُوِّ زمان خیر البریۃ، والزمان الثانی زمانُ حدوث البدعات إلی وقت کثرۃ شیوع المحدثات،
    والزمان الثالث ہو الذی شابہَ زمانَ خیر البریۃ، ورجَع إلی منہاج النبوۃ، وتطہَّرَ مِن بدعات ردیّۃ وروایات فاسدۃ، وضاہَی زمانَ خاتم النبیین، وسماہ آخرَ الزمان نبیُّ الثقلین، لأنہ آخِر من الزمانَین۔ وحمِد اللّٰہ
    تعالی العباد ’’الآخِرین‘‘ کما حمِد الأوّلین، وقالَ ۔ ۱؂ ولکلّ ثلّۃٍ إمام، ولیس فیہ کلام۔ فہذہ إشارۃ إلی خاتم الأئمۃ، وہو المہدی الموعود اللاحق بالصحابۃ، کما قال عزّ و جلّ ۲؂ وسئل رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ
    علیہ وسلم عن حقیقۃ الآخرین فوضع یدہ علی کتف
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 386
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 386
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/386/mode/1up
    سلمان کالموالین المحبین، وقال ’’لو کان الإیمان مُعلَّقًا بالثریّا أی ذاہبًا من الدنیا لنالہ رجل من فارس‘‘۔ وہذہ إشارۃ لطیفۃ من خیر
    البریّۃ إلی آخر الأئمّۃ، وإشارۃ إلی أن الإمام الذی یخرج فی آخر الزمان ویردّ إلی الأرض أنوار الإیمان یکون مِن أبناء فارس بحکم اللّٰہ الرحمٰن۔ فتفکّر وتدبّر، وہذا حدیث لا یبلغ مقامَہ حدیث آخر، وقد ذکرہ
    البخاری فی الصحیح بکمال التصریح۔ وإذا ثبت أن الإمام الآتی فی آخر الزمان ہو الفارسی لا غیرہ من نوع الإنسان، فما بقی لرجل آخر موضع قدم، وہذا من اللّٰہ ملیکِ وجودٍ وعدم، فلا تحاربوا اللّٰہ ولا تجادلوا
    کالمعتدین، وآخر دعوانا أنِ الحمد للّٰہ رب العالمین۔
    القصیدۃ
    فی مدح أبی بکر الصدّیق وعمر الفاروق وغیرہما من الصّحابۃ
    رضی اللّٰہ عنہم أجمعین۔
    رُوَیدَک لا تَہْجُ الصحابۃَ واحْذَرِ
    ولا تَقْفُ
    کلَّ مزوِّرٍ وتَبَصَّرِ
    ولا تتخیَّرْ سبلَ غیٍّ وشقوۃٍ
    ولا تلعَنَنْ قومًا أناروا کَنیِّرِ
    أولئک أہلُ اللّٰہ فَاخْشَ فِناءَ ہم
    ولا تقدَحَنْ فی عِرضہم بتہوُّرِ
    أولئک حزب اللّٰہ حُفَّاظُ دینہِ
    وإیذاؤہم إیذاءُ مولًی
    مُؤثِّرِ
    تَصدَّوا لدین اللّٰہ صدقًا وطاعۃً
    لکلّ عذابٍ محرِق أو مدمِّرِ
    و طہَّر وادی العشق بحر قلوبہم
    فما الزبدُ والغُثاء بعدَ التطہُّرِ
    وجاء وا نبیَّ اللّٰہ صدقا فنوّروا
    ولم یبقَ أثرٌ مِن ظلامٍِِِِِِِ مُکدِّرِ
    بأؔ جنحۃ الأشواق طاروا إطاعۃً
    وصاروا جوارحَ للنبیّ الموقَّرِ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 387
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 387
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/387/mode/1up
    ونحن وأنتم فی البساتین نرتَعُ
    وہم حضروا میدانَ قتلٍ کمَحشَرِ
    وترکوا ہوی الأوطان للّٰہ خالصًا
    وجاء وا الرّسولَ کعاشق
    متخَیِّرِ
    علی الضعف صوّالون مِن قوۃ الہدیٰ
    علی الجُرح سلّالون سیفَ التّشذُّرِ
    أتُکفر خلفاءَ النبیّ تجاسرًا
    أتلعَنُ مَن ہو مثلُ بدر منوَّرِ
    وإن کنتَ قد ساء تْک أمرُ خلافۃٍ
    فحارِبْ مَلِیکًا اجتباہم
    کمُشتری
    فبإذنہ قد وَقَعَ ما کان وَاقعًا
    فلا تَبْکِ بعد ظہور قَدَرٍ مقدَّرِ
    وما استخلفَ اللّٰہُ العلیمُ کذاہلٍ
    وما کان ربُّ الکائناتِ کمُہْتَرِ
    وقُضِیتْ أمورُ خلافۃ موعودۃٍ
    وفی ذاک آیاتٌ لقلبٍ مفکِّرِ
    وإنی
    أری الصدّیقَ کالشمس فی الضحی
    مآثرُہ مقبولۃٌ عندَ ہُوجرِ
    وکان لذات المصطفٰی مثلَ ظلِّہِ
    ومہما أشار المصطفی قام کالجَرِی
    وأَعطی لنصر الدّین أموالَ بیتہِ
    جمیعًا سِوی الشیء الحقیر
    المحقَّرِ
    ولمَّا دعاہ نبیُّنا لرفاقۃٍ
    علی الموت أقبلَ شائقا غیرَ مُدبِرِ
    ولیس محلَّ الطعن حسنُ صفاتہِ
    وإن کنتَ قد أزمعتَ جَورًا فعَیِّرِ
    أبادَ ہوی الدنیا لإحیاء دینہٖ
    وجاء رسولَ اللّٰہ مِن کلّ
    مَعبَرِ
    علیک بصُحف اللّٰہ یا طالبَ الہدی
    لتنظُر اوصاف العتیق المطہَّرِ
    وما إِنْ أری واللّٰہِ فی الصحب کلّہمْ
    کمثل ابی بکر بقلب معطَّرِ
    تخیّرَہ الأصحاب طوعًا لفضلہِ
    وللبحر سلطانٌ علی کلّ
    جعفرِ
    ویثنی علی الصدّیق ربٌّ مہیمنٌ
    فما أنت یا مسکین إن کنتَ تزدری
    لہ باقیات صالحات کشارقٍ
    لہ عینُ آیاتٍ لہذا التطہُّرِ
    تَصدَّی لنصر الدین فی وقت عسرہِ
    تَبدَّی بغارٍ بالرسول
    المؤزَّرِ
    مَکینٌؔ امین زاہد عند ربّہِ
    مخلِّصُ دینِ الحقّ مِن کلِّ مُہجِرِ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 388
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 388
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/388/mode/1up
    ومِن فتن یُخشی علی الدین شرُّہا
    ومِن محنٍ کانت کصخرٍ مکسِّرِ
    ولو کان ہذا الرجل رجلًا منافقًا
    فمَن للنبیّ المصطفٰی مِن
    معزِّرِ
    أتحسب صدّیقَ المہیمنِ کافرًا
    لقولِ غریقٍ فی الضلالۃ أَکْفَرِ
    وکان کقلب الأنبیاء جَنانُہُ
    وہمّتُہُ صوّالۃ کالغضنفرِ
    أریٰ نورَ وجہ اللّٰہ فی عاداتہِ
    وجلواتِہ کأنہ قِطعُ نَیِّرِ
    وإنّ لہ فی
    حضرۃ القدس درجۃً
    فویلٌ لألسنۃٍ حِدادٍ کخنجرِ
    وخدماتُہ مثلُ البدور منیرۃٌ
    وثمراتہ مثل الجنا المستکثَرِ
    وجاء لتنضیر الریاض مبشّرًا
    فلِلّہِ دَرُّ منضِّرٍ ومبشِّرِ*
    وشابَہَہُ الفاروق فی کل
    خطّۃٍ
    وساسَ البرایا کالملیک المدبّرِ
    سعٰی سَعْیَ إخلاص فظہرتْ عزّۃ
    وشأنٌ عظیم للخلافۃ فانظُرِ
    وصبّغ وجہَ الأرض مِن قتلِ کفرۃ
    فیا عجبًا مِن عزمہ المتشمِّرِ
    وصار ذُکاءً کوکبٌ فی
    وقتہِ
    فواہًا لہ ولوقتہ المتطہِّرِ
    وبارَی ملوکَ الکفر فی کل معرَکٍ
    وأہلکَ کلَّ مبارزٍ متکبّرِ
    أری آیۃ عظمٰی بأیدٍ قویۃٍ
    فواہًا لہذا العبقریّ المظفّرِ
    إمامُ أناسٍ فی بِجادٍ مرقَّعٍ
    ملیکُ دیار فی کساء
    مغبَّرِ
    وأُعطیَ أنوارًا فصارَ محدَّثًا
    وکلَّمہ الرحمن کالمتخیّرِ
    مآثرہ مملوّۃ فی دفاترٍ
    فضائلہ أجلی کبدرٍ أنورِ
    فواہًا لہ ولسعیہ ولجہدہِ
    وکان لدین محمدٍؐ خیرَ مِغفَرِ
    وفی وقتہ أفراسُ خیلِ
    محمّدٍؐ
    أثرنَ غبارًا فی بلاد التنصّرِ
    وکسَّر کسری عسکرُ الدین شوکۃً
    فلم یبق منہم غیرُ صُور التَّصوّرِ
    وکان بشوکتہ سلیمانَ وقتہِ
    وجُعلتْ لہ جِنُّ العِدا کالمسخَّرِ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 389
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 389
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/389/mode/1up
    رأیتُ جلالۃ شأنہ فذکرتُہُ
    وما أمدحُ المخلوق إلّا لجوہرِ
    وما إنْ أخاف الخَلقَ عند نصاحۃ
    وإن المرارۃ یلزَمَنْ قولَ مُنذِرِ
    فلما أجازت حُلَلُ قولی لُدونۃً
    وغارت دقائقُہ کبئرٍ مقعَّرِ
    فأفتوا جمیعا أنّ کُفرک ثابتٌ
    وقتلک عملٌ صالح لِلمکفِّرِ
    لقد زیّنَ الشیطانُ أوہامَہم لہم
    فترکوا الصلاحَ لأجل غیٍّ مُدْخِرِ
    وقد مسخَ القہّارُ
    صورَ قلوبہم
    وفقدوا من الأہواء قلبَ التدبُّرِ
    وما بقیتْ فی طینہم ریحُ عِفّۃٍ
    فذَرْہم یسبّوا کلَ بَرٍّ موقَّرِ
    وقد کُفِّرَتْ قبلی صحابۃُ سیّدی
    وقد جاء ک الأخبارُ من کل مُخْبِرِ
    یُسِرّون إیذائی لجبن
    قلوبہم
    وما إنْ أری فیہم خصیمًا ینبری
    یفرّون منی کالثعالب خشیۃً
    یخافون أسیافی ورمحی وخنجری
    ومنہم حِراصٌ للنضال عداوۃً
    غلاظٌ شدادٌ لو یطیقون عسکری
    قد استترتْ أنوارُہم من
    تعصّبٍ
    وإنی أراہم کالدَّمال المعَفَّرِ
    فأعرضْنا عنہم وعن أرجاۂم
    کأنّا دفنّاہم بقبرٍ مقَعَّرِ
    وواللّٰہ إنا لا نخاف شرورَہم
    نقلنا وَضِیئتَنا إلی بیتِ أقدرِ
    وما إن أخاف الخَلق فی حکم خالقی
    وقد خَوَّفوا
    واللّٰہُ کہفی ومَأْزَرِی
    وإن المہیمن یعلَمَنْ کلّ مُضْمَری
    فدَعْنی وربی یا خصیمی ومُکْفِری
    ولو کنتُ مفتریا کذوبا لضَرَّنی
    عداوۃُ قومٍ جرَّدوا کلّ خنجرِ
    بوجہ المہیمن لستُ رجلا کافرا
    وإن
    المہیمن یعلَمَنْ کلّ مُضْمَری
    ولستُ بکذّاب وربّی شاہدٌ
    و یعلمُ ربّی کلَّ ما فی تصوُّری
    وأُعطِیتُ أسرارًا فلا یعرفونہا
    وللناس آراءٌ بقدْرِ التبصُّر
    فسبحانَ ربِّ العرش عمّا تقوَّلوا
    علیہ بأقوال
    الضلال کمُفتَری
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 390
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 390
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/390/mode/1up
    وما أنا إلا مسلمٌ تابعُ الہدیٰ
    فیا صاحِ لا تَعجَلْ ہوًی وتَدَبَّرِ
    ولکنْ علومی قد بدا لُبُّ لُبِّہا
    لِما رَدِفَتْہا ظُفْرُ کَشْفٍ مقَشِّرِ
    لقد
    ضلّ سعْیًا مَن أتانی مخالفًا
    وربی معی واللّٰہُ حِبِّی ومُوثِری
    ویعلو أولو الطغوی بأوّل أمرِہم
    وأہلُ السعادۃ فی الزمان المؤَخَّرِ
    ولو کنتَ من أہل المعارف والہدیٰ
    لصدَّقْتَ أقوالی بغیر تحیُّرِ
    ولو
    جئتَنی من خوفِ ربٍّ محاسِبٍ
    لأصبَحْتَ فی نعماۂ المستَکثَرِ
    ألا لا تُضِعْ وقتَ الإنابۃ والہُدیٰ
    صُدودُک سمٌّ یا قلیلَ التفکّرِ
    وإن کنت تزعمُ صبرَ جسمِک فی اللّظی
    فجرِّبْہُ تمرینًا بحرْقٍ مسَعِّرِ
    وما لک
    لا تبغی المعالِجَ خائفًا
    وإنک فی داءٍ عُضالٍ کمُحصَرِ
    فیا أیہا المُرخی عِنانَ تعصّبٍ
    خَفِ اللّٰہَ واقبَلْ تُحْفَ وعظِ المذکِّرِ
    وخَفْ نارَ یومٍ لا یَرُدُّ عذابَہا
    تدَلُّلُ شیخٍ أو تظاہُرُ مَعْشِرِ
    سءِمنا تکالیفَ
    التطاول مِن عِدا
    تمادتْ لیالی الجَور یا ربِّ فَانْصُرِ
    وأنتَ رحیم ذو حنان ورحمۃٍ
    فنَجِّ عبادَک من وبالٍ مدمِّرِ
    رأیتُ الخطایا فی أمور کثیرۃٍ
    وإسرافَنا فاغفِرْ وأیِّدْ وعَزِّرِ
    وأنتَ کریمُ الوجہِ مَولی
    مُجامِلٌ
    فلا تطرُدِ الغلمانَ بعد التخیُّرِ
    وجئناک کالموتٰی فأَحْیِ أمورَنا
    ونستغفِرَنْک مستغیثین فَاغْفِرِ
    إلٰی أیِّ باب یا إلٰہی تَرُدُّنی
    أتترکُنی فی کفِّ خصمٍ مُخسِّرِی
    إلٰہی فدَتْک النفسُ أنت
    مقاصدی
    تعالَ بفضلٍ من لدُنْک وبَشِّرِ
    أأعرضتَ عنّی لا تکلّمُ رحمۃً
    وقد کنتَ من قبلِ المصائبِ مُخبِری
    وکیف أظنُّ زوالَ حُبِّک طُرفۃً
    ویَأْطِرُ قلبی حبُّک المتَکثِّرِ
    وجدؔ تُ السّعادۃ کلَّہا فی
    إطاعۃٍ
    فوَفِّقْ لآخَرَ من خلوصٍ ویَسِّرِ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 391
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 391
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/391/mode/1up
    إلہی بوجہک أَدْرِکِ العبدَ رحمۃً
    تعالَ إلی عبدٍ ذلیلٍ مُکفّرِ
    ومِن قبل ہذا کنتَ تسمع دعوتی
    وقد کنتَ فی المضمار تُرسی
    ومأْزَری
    إلٰہی أَغِثْنی یا إلٰہی أَمِدَّنی
    و بَشِّرْ مقصودی حنانًا وخَبِّرِ
    أَرِنی بنورک یا ملاذی ومَلجَئی
    نعوذ بوجہک من ظلامٍ مُدَعْثِرِ
    وخُذْ رَبِّ مَن عادَی الصلاحَ ومفسدًا
    ونَزِّلْ علیہ الرِّجْزَ حقًّا
    ودَمِّرِ
    وکُنْ ربِّ حنّانًا کما کنتَ دائمًا
    وإن کنتُ قد غادرتُ عہدًا فذَکِّرِ
    وإنّک مولی راحمٌ ذو کرامۃٍ
    فبَعِّدْ عنِ الغلمان یومَ التشوُّرِ
    أری لیلۃً لیلاءَ ذاتَ مخافۃٍ
    فَہَنّئ وبَشِّرْنا بیومٍ عبقرِی
    وفَرِّجْ
    کُروبی یا کریمی ونَجِّنی
    ومَزِّقْ خصیمی یا إلٰہی وعَفِّرِ
    ولیستْ علیک رموزُ أمری بغُمّۃٍ
    وتعرفُ مستوری وتدری مقَعَّری
    زلالُک مطلوبٌ فأَخْرِجْ عُیونَہ
    جلالُک مقصودٌ فأیِّدْ وأَظْہِرِ
    وجدناک
    رحمانًا فما الہَمُّ بعدَہُ
    نعوذ بنورک من زمانٍ مُکوّرِ
    وآخر دعوانا أنِ الحمدُ کلُّہُ
    لربٍّ کریمٍ قادرٍ ومیَسِّرِ
    الوصیّۃ
    إنّ من السہود* أن القدح یوجب القدح، والمدح یوجب المدح۔ فإنک إذا قلتَ لرجل إنّ
    أباک رجل شریف صالح، فلن یقول لأبیک إنہ شریر طالح، بل یرضیک بکلام زکّاہ، ویمدح أباک کمثل مَدْحٍ مدحتَ بہ أباہ، بل یذکرہ بأصفاہ وأعلاہ، وأما إذا شتمتَ فیکلّم کما کلّمْتَ۔ فکذلک الذین یسبّون الصدّیق
    والفاروق، فإنما ہم یسّبون علیًّا ویؤذونہ ویُضیعون الحقوق۔ فإنک إذا قلتَ إن أبا بکر کافر، فقد ہیّجتَ محبَّ الصدّیق الأکبر لأن یقول إنّ علیًّا أکفرُ؛ فما شتمتَ الصدّیق، بل شتمتَ علیًّا وجاوزتَ الطریق۔ وإنک لا
    تسبّ أبا أحد لئلا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 392
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 392
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/392/mode/1up
    یسبّوا أباک، وکذلک لا تشتم أُمَّ مَن عاداک، ولکن لا تبالی عزّۃَ بیت النبوۃ، ولا تعصمہم من سوء ہذہ السلسلۃ، ولا تنظر إلی فساد النتیجۃ
    مع دعاوی التشیع وتصلُّف المحبّۃ، فکل ذنب السبّ علی عنقک یا عدو آل رسول اللّٰہ والخمسۃ المطہرۃ ومتطبعا بطباع المنافقین۔
    حاشیہ متعلقہ صفحہ ۳۸۸ اناؔ بیّنا ان ابابکر کان رجلا عبقریا وانسانا
    اِلٰھیًّا جلّی مطلع الاسلام بعد الظلام وکان قصاراہ انہ من ترک الاسلام فباراہ ومن انکر الحق فماراہ ومن دخل دارالاسلام فداراہ۔ کابد فی اِشاعۃ الاسلام شدائد واعطی الخلق دررًا فراید۔ ساس الاعراب بالعزم
    المبارک وھذب تلک الجمال فی المسارح والمبارک واستقراء المسالک ورغاء المعارک ما استفتی بأسًا ورأی من کل طرف یأسًا انبری لمبارات کل خصیم وما استھوتہ الافکار ککل جبان وسقیم وثبت عند کل فساد
    وبلوی انہ ارسخ من رضویٰ واھلک کل من تنبیٰ من کذب الدعویٰ۔ ونبذ العُلق للّٰہ الا علٰی وکان کل اھتشاشہ فی اعلاء کلمۃ الاسلام واتباع خیر الانام فدونک حافظ دینک واترک طنینک وانی ماقلت کمتبع الاھواء او
    مقلد امر وجد من الاباء بل حُبّب الی مُذْ سَعَتْ قدمی ونفث قلمی ان اتخذ التحقیق شرعۃ والتعمیق نُجعۃ فکنت انقب عن کل خبر وا سئل عن کل حبر۔ فوجدت الصدیق صدیقا وکشف علی ھذا الامر تحقیقا فاذا
    الفیتہ امام الائمۃ وسراج الدّین والاُمّۃ شددت یدی بغرزہ وأویت الی حرزہ واستنزلت رحمۃ ربی بحبّ الصالحین۔ فرحمنی وآوانی وایّدنی وربّانی وجعلنی من المکرمین۔ وجعلنی مجدّد ھذہ المأۃ والمسیح
    الموعود من الرحمۃ وجعلنی من المکلّمین واذھب عنی الحزن واعطانی ما لم یعط احد من العالمین۔ وکل ذٰلک بالنبی الکریم الاُمّی و حبّ ھٰؤلاء المقربین اللّٰھم فصلّ و سلّم علی افضل رسلک و خاتم انبیاء ک محمد
    خیر الناس اجمعین وواللّٰہ ان ابا بکر
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 393
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 393
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/393/mode/1up
    کان صاحب النبی صلعم فی الحرمین و فی القبرین۔ اعنی قبر الغار الذی توارٰی فیہ کالمیت عند الاضطرار۔ والقبر الذی فی المدینۃ
    ملتصقا بقبر خیرالبریۃ فانظر مقام الصدیق ان کنت من اھل التعمیق۔ حمدہ اللّٰہ و خلافتہ فی القراٰن واثنی علیہ باحسن البیان ولا شک انہ مقبول اللّٰہ و مستطاب وھل یحتقر قدرہ الا مصاب غابت شوائب الاسلام
    بخلافتہ وکمل سعود المسلمین برأفتہ وکاد ان ینفطر عمود الاسلام لو لا الصدیق صدیق خیرالانام۔ وجد الاسلام کالمھتر الضعیف والموؤف النحیف فنھض لاعادۃ حبرہ و سبرہ کالحاذقین۔ واوغل فی اثر المفقود
    کالمنھوبین۔ حتی عاد الاسلام الٰی رشاقۃ قدہ وأسالۃ خدہ ونضرۃ جماؔ لہ و حلاوۃ زلالہ و کان کلّ ھٰذا من صدق ھٰذا العبد الامین۔ عفّر النفس و بدل الحالۃ وما طلب الجعالۃ الا ابتغاء مرضات الرحمان و ما
    اظلّ المَلَوان علیہ الا فی ھٰذا الشأن کان محیی الرفات ودافع الاٰفات و واقی الغافات۔ وکلُّ لبّ النصرۃ جاء فی حصتہ وھذا من فضل اللّٰہ و رحمتہ والاٰن نذکر قلیلا من الشواھد متوکّلًا علی اللّٰہ الواحد لیظھر علیک
    کیف اعدم فتنا مشتدۃ الھبوب ومحنًا مشتنطۃ الأُلْھوب و کیف اعدم فی الحرب ابناء الطعن والضرب فبانت دخیلۃُ امرہ من افعالہ وشھدت اعمالہ علی سر خصالہ فجزاہ اللّٰہ خیر الجزاء و حشرہ فی ائمۃ
    الاتقیاء ورحمنا بھٰؤلاء الاحباء فتقبل منی یا ذالالاء والنعماء وانک ارحم الرحماء وانّک خیر الرّاحمین۔
    فتنۃ الارتداد بعد وفات النّبی صعلم خیر الرسل و امام العباد
    لما قبض رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ
    وسلم ارتدت العرب اما القبیلۃ مستوعبۃ و اما بعض منھا و نجم النفاق والمسلمون کالغنم فی اللیلۃ الممطرۃ لقلتھم وکثرۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 394
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 394
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/394/mode/1up
    عدوھم و ظلام الجو بفقد نبیھم ( الجزء الثانی من تاریخ ابن خلدون صفحہ ۶۵) وقال ایضا۔ ارتدت العرب عامۃ و خاصۃ واجتمع
    علی طلیحۃ عوام طیء و اسد وارتدت غطفان وتوقفت ھوازن فامسکوا الصدقۃ وارتد خواص من بنی سلیم وکذا سائر الناس بکل مکان (صفحہ۶۵) وقال ابن الأثیر فی تاریخہ لما توفی رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ
    علیہ وسلم و وصل خبرہ الٰی مکۃ وعاملہ علیھا عتاب بن أسید استخفی عتاب وارتجت مکۃ وکاد اھلھا یرتدون(الجزء الاول صفحہ۱۳۴)
    وقال ایضًا۔ ارتدت العرب امّا عامۃ او خاصۃ من کل قبیلۃ وظھر
    النفاق واشرأبت الیھود والنصرانیۃ و بقی المسلمون کالغنم فی اللیلۃ الممطرۃ لفقد نبیّھم و قلّتھم و کثرۃ عدوھم فقال الناس لابی بکر انّ ھٰؤلاء یعنون جیش اسامۃ جند المسلمین والعرب علٰی ما ترٰی فقد انتقضت
    بک فلا ینبغی ان تفرق جماعۃ المسلمین عنک فقال ابوبکر والذی نفسی بیدہ لو ظننت ان السباع تخطفنی لانفذتُ جیش اسامۃ کما امر النبی صلعم ولا اردّ قضاءً قضی بہ رسول اللّٰہ صلعم وقال عبد اللّٰہ بن مسعود
    لقد قمنا بعد النّبی صلعم مقاؔ مًا کِدنا اَنْ نھلک لو لا ان منّ اللّٰہ علینا بابی بکر رضی اللّٰہ عنہ اجمعنا علی ان نقاتل علی ابنۃ مخاض وابنۃ لبون و ان ناکل قری عربیۃ ونعبد اللّٰہ حتی یاتینا الیقین۔(ایضا
    صفحہ۱۴۲)
    خروج مُدعی النبوّۃ
    وثب الاسود بالیمن و وثب مسیلمۃ بالیمامۃ ثم وثب طلیحۃ بن خویلد فی بنی اسد یدعی کلہم النبوۃ (ابن خلدون الجزء الثانی صفحہ۶۰) و تنبأت سجاح بنت الحارث
    من بنی عقفان واتبعھا الھذیل بن عمران فی بنی تغلب و عقبۃ بن ھلال فی النمر والسلیل بن قیس فی شیبان و زیاد بن بلال واقبلت من الجزیرۃ فی ھٰذہ الجموع قاصدۃ المدینۃ لتغزو ابا بکر رضی اللّٰہ عنہ (
    صفحہ۶۵)
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 395
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 395
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/395/mode/1up
    اسخلافہ صلّی اللّٰہ علیہ وسلم ابا بکرؓ نائبا عنہ للامامۃ فی الصّلٰوۃ
    قال ابن خلدون ثم ثقل بہ الوجع واغمی علیہ فاجتمع علیہ
    نساء ہ واھل بیتہ والعباس و علی ثم حضر وقت الصلٰوۃ فقال مروا ابا بکر فلیصل بالناس۔(الجزء الثانی صفحہ۶۲)
    مکان ابی بکرؓ من النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم
    وقال ابن خلدون ثم قال رسول اللّٰہ
    صلی اللّٰہ علیہ وسلم بعد ما اوصی بثلاث سدّوا ھذہ الابواب فی المسجد الا باب ابی بکر فانی لا اعلم امرءً افضل یدًا عندی فی الصحبۃ من ابی بکر۔ (الجزء الثانی صفحہ۶۲)
    شدۃ حُبّ ابی بکر للنبیّ صَلی
    اللّٰہ علیہ وسلّم
    وذکر ابن خلدون واقبل ابوبکر و دخل علٰی رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم فکشف عن وجھہ وقبّلہ وقال بابی انت و أمی قد ذقت الموتۃ التی کتب اللّٰہ علیک و لن یصیبک بعدھا موتۃ ابدًا (
    ایضًا صفحہ۶۳)
    وکان من لطائف منن اللّٰہ علیہ واختصاصہ بکمال القرب من النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم کما نص بہ ابن خلدون انہؔ رضی اللّٰہ عنہ حمل علی السریر الذی حمل علیہ رسول اللّٰہ صلی
    اللّٰہ علیہ وسلم و جعل قبرہ مثل قبر النبی مسطحا والصقوا لحدہ بلحد النبی صلعم وجعل رأسہ عند کتفی النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم وکان اخر ما تکلم بہ توفنی مسلما والحقنی بالصالحین۔ (صفحہ ۱۷۶)
    ولنکتب ھنا کتابا کتبہ الصدیق الٰی قبائل العرب المرتدۃ لیزید المطلعون علیہ ایمانا وبصیرۃ بصلابۃ الصدیق فی ترویج شعائر اللّٰہ والذبّ عن جمیع ما سنّہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلّم
    بسم اللّٰہ
    الرحمٰن الرحیم من ابی بکر خلیفۃ رسول اللّٰہ صلعم الٰی من بلغہ کتابی ھٰذا من عامّۃ وخاصّۃ أقام علی اسلامہ او رجع عنہ سلام علی من اتبع الھدٰی ولم یرجع بعد الھدٰی الی الضلالۃ والعمٰی فانی احمد الیکم
    اللّٰہ الذی لا الٰہ الا ھو واشھد ان لا الٰہ الا اللّٰہ وحدہ لا شریک لہ و انّ محمدا عبدہ ورسولہ نقرّ بما جاء بہ و نکفرّ من ابٰی و نجاھدہ امّا بعد فان اللّٰہ تعالٰی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 396
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 396
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/396/mode/1up
    ارسل محمدا بالحق من عندہ الی خلقہ بشیرًا و نذیرا و داعیا الی اللّٰہ باذنہ وسراجا منیرا لینذر من کان حیا و ویحق القول علی
    الکافرین فھدی اللّٰہ بالحق من اجاب الیہ و ضرب رسول اللّٰہ صلعم من ادبر عنہ حتی صار الی الاسلام طوعا وکرھا ثم توفی رسول اللّٰہ صلعم وقد نفّذ لامر اللّٰہ ونصح لأُمّتہ وقضی الذی کان علیہ و کان اللّٰہ
    قد بیّن لہ ذٰلک ولاھل الاسلام فی الکتاب الذی انزل فقال ۱؂ وقال ۔ ؂ وقال للمؤمنین ۔۔ ۔۳؂ فمن کان انما یعبد محمدا فان محمدا قد مات و من کان انما یعبد اللّٰہ وحدہ لا شریک لہ فان اللّٰہ لہ بالمرصاد حیٌّ قیومٌ لا
    یموت ولا تاخذہ سنۃ ولا نوم حافظ لامرہ منتقم من عدوہ یجزیہ۔ وانی اوصیکم بتقوی اللّٰہ وحظکم ونصیبکم من اللّٰہ وما جاء کم بہ نبیکم صلعم وان تھتدوا بھداہ وان تعتصموا بدین اللّٰہ فان کل من یھدہ اللّٰہ ضال
    و کل من لم یعافہ لمبتلی وکل من لم یُعنہ مخذول فمن ھداہ اللّٰہ کان مھتدیا و من اضلّہ کان ضالا قال اللّٰہ تعالٰی ۔۴؂ ولم یُقبل منہ فی الدنیا عمل حتی یقرّ بہ ولم یقبل منہ فی الاٰخرۃ صرف ولا عدل و قد بلغنی
    رجوع من رجع منکم عن دینہ بعد ان اقرّ بالاسلام وعمل بہ اغترارًا باللّٰہ وجہالۃ بامرہ واجابۃ للشیطان قال اللّٰہ تعالٰی ۔ ؂ و قال ۔ ۔۶؂ وانی بعثت الیکم فلانا من المھاجرین والانصار والتابعین باحسان وامرتہ
    ان لا یقاتل احدًا ولا یقتلہ حتی یدعوہ الی داعیۃ اللّٰہ فمن استجاب لہ و اقرّ وکفّ و عمل صالحًا قبل منہ و اعانہ علیہ ومن ابٰی امرت ان یقاتلہ علٰی ذٰلک ثم لا یبقی علی احد منہم قدر علیہ وان یحرقھم بالنار
    ویقتلھم کلقتلۃ وان یسبی النسآء والذراری ولا یقبل من احد الا الاسلام فمن اتبعہ فھو خیر لہ ومن ترکہ فلن یعجز اللّٰہ وقد امرترسولی ان یقرء
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 397
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 397
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/397/mode/1up
    کتابی فی کل مجمعٓٓٓٓ لکم والداعیۃ الاذان و اذ اذّن المسلمون فاذّنوا کفّوا عنھم وان لم یؤذّنوا عاجلوھم واذا أذّنوا اسألوھم ما علیھم فان
    ابوا عاجلوھم وان اقرّوا قبل منھم۔
    مِن المؤلّف
    إنّ الصحابۃَ کلَّہم کذُکاءِ
    قد نَوّروا وجہَ الوری بضیاءِ
    ترکوا أقاربَہم وحُبَّ عِیالہم
    جاء وا رسولَ اللّٰہ کالفقراءِ
    ذُبحُوا و ما خافوا الوری من
    صدقھم
    بل آثروا الرحمان عند بلاءِ
    تحت السیوف تَشہّدوا لخلوصھم
    شَہِدوا بصدق القلب فی الأمْلاءِ
    حضروا المواطنَ کلھا من صدقہم
    حفَدوا لہا فی حَرَّۃٍ رَجْلاءِ
    الصالحون الخاشعون
    لربہم
    البایِتون بذکرہ وبکاءِ
    قومٌ کِرامٌ لا نُفرِّقُ بینہم
    کانوا لخیر الرسل کالأعضاءِ
    ما کان طعنُ الناس فیہم صادقًا
    بل حَشْنَۃٌ نشأَتْ مِن الأہواءِ
    انی أری صَحْب الرسول جمیعَہم
    عندَ الملیکِ
    بعزَّۃٍ قَعْسَاءِ
    تَبِعوا الرسول برَحْلہِ و ثَواءِ
    صاروا بِسُبلِ حبیبِہم کعَفاءِ
    نہضوا لنصر نبینا بوفاءٍ
    عند الضلال وفتنۃٍ صمَّاءِ
    وتخیَّروا للّٰہ کلَّ مصیبۃٍ
    و تہَلَّلوا بالقتل والإجلاءِ
    أنوارُہم فاقَتْ بیانَ
    مبیِّنٍ
    یسوَدُّ منہا وجہُ ذی الشحناءِ
    فانظُرْ إلی خِدماتہم وثَباتہم
    و دَعِ العِدَا فی غُصَّۃ و صَلاءِ
    یا ربِّ فارحمنا بصَحْبِ نبیِّنا
    واغفِرْ وأنتَ اللّٰہُ ذو آلاءِِ
    واللّٰہ یعلَم لو قدرتُ ولم أمُتْ
    لأَشعْتُ مدح
    الصَحْب فی الأعداءِ
    ان کنت تلعنتھم و تضحک خسّۃ
    فارقُبْ لنفسک کلَّ اِسْتِہزاءِِ
    من سبّ اصحاب النبی فقد ردی
    حق فما فی الحقّ من اخفاء
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 398
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 398
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/398/mode/1up
    عامؔ اطلاع کے لئے
    ایک اشتہار
    وہ تمام صاحب جنہوں نے شیخ محمد حسین صاحب بٹالوی کے رسائل اشاعت السنہ
    دیکھے ہوں گے یا ان کے وعظ سنے ہوں گے یا ان کے خطوط پڑھے ہوں گے وہ اس بات کی گواہی دے سکتے ہیں کہ شیخ صاحب موصوف نے اس عاجز کی نسبت کیا کچھ کلمات ظاہر فرمائے ہیں اور
    کیسے کیسے خودپسندی کے بھرے ہوئے کلمات اور تکبر میں ڈوبے ہوئے ترہات اُن کے منہ سے نکل گئے ہیں کہ ایک طرف تو انہوں نے اس عاجز کو کذاب اور مفتری قرار دیا ہے اور دوسری طرف
    بڑے زور اور اصرار سے یہ دعویٰ کر دیا ہے کہ مَیں اعلیٰ درجہ کا مولوی ہوں اور یہ شخص سراسر جاہل اور نادان اور زبانِ عربی سے محروم اور بے نصیب ہے اور شاید اس بکواس سے ان کی
    غرض یہ ہو گی کہ تا ان باتوں کا عوام پر اثر پڑے اور ایک طرف تو وہ شیخ بطالوی کو فاضل یگانہ تسلیم کر لیں اور اعلیٰ درجہ کا عربی دان مان لیں اور دوسری طرف مجھے اور میرے دوستوں کو
    یقینی طور پر سمجھ لیں کہ یہ لوگ جاہل ہیں اور نتیجہ یہ نکلے کہ جاہلوں کا اعتبار نہیں۔ جو لوگ واقعی مولوی ہیں انہیں کی شہادت قابلِ اعتبار ہے۔ مَیں نے اس بیچارہ کو لاہور کے ایک بڑے جلسہ میں
    یہ الہام بھی سنا دیا تھا کہ انی مھین من اراد اھانتک کہ مَیں اس کی اہانت کروں گا جو تیری اہانت کے درپَے ہو۔ مگر تعصب ایسا بڑھا ہوا تھا کہ یہ الہامی آواز اس کے کان تک نہ پہنچ سکی اس نے چاہا
    کہ قوم کے دلوں میں یہ بات جم جائے کہ یہ شخص ایک حرف عربی کا نہیں جانتا پر خدا نے اسے دکھلا دیا کہ یہ بات الٹ کر اسی پر پڑی۔ یہ وہی الہام ہے جو کہا گیا تھا کہ مَیں اُسی کو ذلیل کروں گا
    جو تیری ذلت کے درپے ہو گا۔ سبحان اللہ کیسے وہ قادر اور غریبوں کا حامی ہے ۔ پھر لوگ ڈرتے نہیں کیا یہ خداتعالیٰ کا نشان نہیں کہ وہی شخص جس کی نسبت کہا گیا تھا کہ جاہل ہے اور
    ایک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 399
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 399
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/399/mode/1up
    صیغہ تک اس کو معلوم نہیں وہ ان تمام مکفروں کو جو اپنا نام مولوی رکھتے ہیں بلند آواز سے کہتا ہے کہ میری تفسیر کے
    مقابل پر تفسیر بناؤ تو ہزار روپے انعام لواور نور الحق کے مقابل پر بناؤ تو پانچ ہزار روپیہ پہلے رکھا لو اور کوئی مولوی دم نہیں مارتا۔ کیا یہی مولویت ہے جس کے بھروسہ سے مجھے کافر ٹھہرؔ
    ایا تھا۔ ایہا الشیخ اب وہ الہام پورا ہوا یا کچھ کسر ہے۔ ایک دنیا جانتی ہے کہ مَیں نے اسی فیصلہ کی غرض سے اوراسی نیت سے کہ تا شیخ بطالوی کی مولویت اور تمام کفر کے فتوے لکھنے والوں کی
    اصلیت لوگوں پر کھل جائے۔ کتاب کرامات الصادقین عربی میں تالیف کی اور پھر اس کے بعد رسالہ نور الحق بھی عربی میں تالیف کیا۔ اور میں نے صاف صاف اشتہار دے دیا کہ اگر شیخ صاحب یا
    تمام مکفر مولویوں سے کوئی صاحب رسالہ کرامات الصادقین کے مقابل پر کوئی رسالہ تالیف کریں تو ایک ہزار روپیہ ان کو انعام ملے گا۔ اور اگر نور الحق کے مقابل پر رسالہ لکھیں تو پانچ ہزار روپیہ
    ان کو دیا جائے گا۔ لیکن وہ لوگ بالمقابل لکھنے سے بالکل عاجز رہ گئے۔ اور جو تاریخ ہم نے اس درخواست کے لئے مقرر کی تھی یعنی اخیر جون ۱۸۹۴ ؁ء وہ گذر گئی۔ شیخ صاحب کی اس خاموشی
    سے ثابت ہو گیا کہ وہ علم عربی سے آپ ہی بے بہرہ اور بے نصیب ہیں اور نہ صرف یہی بلکہ یہ بھی ثابت ہوا کہ وہ اوّل درجہ کے دروغ گو اور کاذب اور بے شرم ہیں کیونکہ انہوں نے تو تقریرًا و
    تحریرًا صاف اشتہار دے دیا تھا کہ یہ شخص علم عربی سے محروم اور جاہل ہے یعنی ایک لفظ تک عربی سے نہیں جانتا تو پھر ایسے ضروری مقابلہ کے وقت جس میں اُن پر فرض ہو چکا تھا کہ وہ
    اپنی علمیت ظاہر کرتے کیوں ایسے چُپ ہو گئے کہ گویا وہ اس دنیا میں نہیں ہیں خیال کرنا چاہیئے کہ ہم نے کس قدر تاکید سے اُن کو میدان میں بلایا اور کن کن الفاظ سے اُن کو غیرت دلانا چاہا مگر
    انہوں نے اس طرف آنکھ اٹھا کر بھی نہ دیکھا۔ ہم نے صرف اس خیال سے کہ شیخ صاحب کی عربی دانی کا دعویٰ بھی فیصلہ پا جائے رسالہ نور الحق میں یہ اشتہار دے دیا کہ اگر شیخ صاحب
    عرصہ تین ماہ میں اسی قدر کتاب تحریر کر کے شائع کر دیں اور وہ کتاب درحقیقت جمیع لوازم بلاغت و فصاحت والتزام حق اور حکمت میں نور الحق کے ثانی ہو تو تین ہزار روپیہ نقد بطور انعام شیخ
    صاحب کو دیا جائے گا اور نیز الہام
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 400
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 400
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/400/mode/1up
    کے جھوٹا ٹھہرانے کے لئے بھی ایک سہل اور صاف راستہ ان کو مل جائے گا اور ہزار *** کے داغ سے بھی بچ جائیں گے
    ۔ورنہ وہ نہ صرف مغلوب بلکہ الہام کے مصدق ٹھہریں گے۔ مگر شیخ صاحب نے ان باتوں میں سے کسی بات کی بھی پرواہ نہ کی اور کچھ بھی غیرت مندی نہ دکھلائی۔ اس کا کیا سبب تھا؟ بس یہی
    کہ یہ مقابلہ شیخ صاحب کی طاقت سے باہر ہے سو ناچار انہوں نے اپنی رسوائی کو قبول کر لیا اور اس طرف رخ نہ کیا یہ اسی الہام کی تصدیق ہے کہ انی مھین من اراد اھانتک شیخ صاحب نے
    منبروں پر چڑھ چڑھ کر صدہا آدمیوں میں صدہا موقعوں میں بار بار اِس عاجز کی نسبت بیان کیا کہ یہ شخص زبان عربی سے محض بے خبر اور علوم دین سے محض نا آشنا ہے ایک جاہل آدمی ہے اور
    کذاب اور دجّال ہے اور اسی پر بس نہ کیا بلکہ صدہا خط اسی مضمون کے اپنے دوستوں کو لکھےؔ اور جابجا یہی مضمون شائع کیا۔ اور اپنے جاہل دوستوں کے دلوں میں بٹھا دیا کہ یہی سچ ہے۔ سو
    خداتعالیٰ نے چاہا کہ اِس متکبر کا غرور توڑے اوراس گردن کش کی گردن کومروڑے اور اس کو دکھلاوے کہ کیونکر وہ اپنے بندوں کی مدد کرتا ہے۔ سو اس کی توفیق اور مدد اور خاص اس کی تعلیم
    اور تفہیم سے یہ کتابیں تالیف ہوئیں اور ہم نے کرامات الصادقین اور نور الحق کے لئے آخری تاریخ درخواست مقابلہ کی اس مولوی اور تمام مخالفوں کے لئے اخیر جون ۱۸۹۴ ؁ء مقرر کی تھی جو
    گذرگئی اور اب دونوں کتابوں کے بعد یہ کتاب سرّ الخلافۃ تالیف ہوئی ہے جو بہت مختصر ہے اور نظم اس کی کم ہے اور ایک عربی دان شخص ایسا رسالہ سات دن میں بہت آسانی سے بناسکتا ہے اور
    چھپنے کے لئے دس دن کافی ہیں لیکن ہم شیخ صاحب کی حالت اور اس کے دوستوں کی کم مائیگی پر بہت ہی رحم کر کے دس دن اور زیادہ کر دیتے ہیں اور یہ ستائیس دن ہوئے سو ہم فی دن ایک روپیہ
    کے حساب سے ستائیس روپیہ کے انعام پر یہ کتاب شائع کرتے ہیں اور شیخ صاحب اور ان کے اِسمی مولویوں کی خدمت میں التماس ہے کہ اگر وہ اپنی سُوء قسمت سے ہزار روپیہ کا انعام لینے سے
    محروم رہے اور پھر پانچ ہزار روپیہ کا انعام پیش کیا گیا تو وہ وقت بھی اُن کی کم مائیگی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 401
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 401
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/401/mode/1up
    کی وجہ سے ان کے ہاتھ سے جاتا رہا۔ اور تاریخ درخواست گذر گئی اب وہ ستائیس روپیہ کو تو نہ چھوڑیں ہم نے سنا ہے کہ
    ان دنوں میں شیخ صاحب پر تنگدستی کی وجہ سے تکلیفات بہت ہیں۔ خشک دوستوں نے وفا نہیں کی۔ پس ان دنوں* میں تو اُن کے لئے ایک روپیہ ایک اشرفی کا حکم رکھتا ہے گویا یہ ستائیس روپیہ
    ستائیس اشرفی ہیں جن سے کئی کام نکل سکتے ہیں اور ہم اپنے سچے دل سے اقرار کرتے ہیں کہ اگر رسالہ سر الخلافہ کے مقابل پر شیخ صاحب نے کوئی رسالہ میعاد مقررہ کے اندر شائع کردیا اور
    وہ رسالہ ہمارے رسالہ کا ہم پلہ ثابت ہوا تو ہم نہ صرف ستائیس روپیہ ان کو دیں گے بلکہ یہ تحریری اقرار لکھ دیں گے کہ شیخ صاحب ضرور عربی دان اور مولوی کہلانے کے مستحق ہیں بلکہ آئندہ
    مولوی کے نام سے ان کو پکارا جائے گا۔ اور چاہیئے کہ اب کے دفعہ شیخ صاحب ہمت نہ ہاریں۔ یہ رسالہ تو بہت ہی تھوڑا ہے اور کچھ بھی چیز نہیں۔ اگر ایک ایک جُز روز گھسیٹ دیں تو صرف چار
    پانچ روز میں اس کو ختم کرسکتے ہیں۔ اور اگر اپنے وجود میں کچھ بھی جان نہیں تو اُن سو ڈیڑھ سو مولویوں سے مدد لیں جنہوں نے بغیر سوچے سمجھے کے مسلمانوں کو کافر اور جہنم ابدی کی سزا
    کے لائق ٹھہرایا اور بڑے تکبر سے اپنے تئیں مولوی کے نام سے ظاہر کیا اگر وہ ایک ایک جُز لکھ کر دیں تو شیخ صاحب بمقابل اس رسالہ کے ڈیڑھ سو جُز کا رسالہ شائع کر سکتے ہیں۔ لیکن اگر شیخ
    صاحب نے پھر بھی ایسا کرنہ دکھایا تو پھر بڑی بے شرمی ہو گی کہ آ ؔ ئندہ مولوی کہلاویں بلکہ مناسب ہے کہ آئندہ جھوٹ بولنے اور جھوٹ بلوانے سے پرہیز کریں۔ شیخ کا نام آپ کے لئے کافی ہے
    جو باپ دادے سے چلا آتا ہے یا منشی کا نام بہت موزوں ہو گا۔ لیکن ابھی یہ بات قابل آزمائش ہے کہ آپ منشی بھی ہیں یا نہیں۔ منشی کے لئے ضروری ہے کہ فارسی نظم میں پوری دسترس رکھتا ہو
    مگر میری نظر سے اب تک آپ کا کوئی فارسی دیوان نہیں گذرا۔ بہرحال اگر ہم رعایت اور چشم پوشی کے طور پر آپ کا منشی ہونا مان بھی لیں اور فرض
    * نوٹ:۔ شیخ صاحب اپنے حال کے
    پرچہ میں اقراری ہیں کہ اگر اُن کے دوستوں نے اب بھی اُن کی مدد نہ کی تو وہ اس نوکری سے استعفا دے دیں گے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 402
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 402
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/402/mode/1up
    کر لیں کہ آپ منشی ہیں گو منشیانہ لیاقتیں آپ میں پائی نہیں جاتیں تو چنداں حرج نہیں کیونکہ منشی گری کو ہمارے دین سے
    کچھ تعلق نہیں لیکن ہم کسی طرح مولوی کا خطاب ایسے نادانوں کو دے نہیں سکتے جن کو ہم پانچ ہزار روپیہ تک انعام دینا کریں تب بھی اُن کی مردہ روح میں کچھ قوت مقابلہ ظاہر نہ ہو ہزار *** کی
    دھمکی دیں کچھ غیرت نہ آوے تمام دنیا کو مددگار بنانے کے لئے اجازت دیں تب بھی ایک جھوٹے منہ سے بھی ہاں نہ کہیں ایسے لوگوں کو اگر مولوی کا لقب دیا جاوے تو کیا بجز مسلمانوں کے کافر
    بنانے کے کچھ اور بھی ان میں لیاقت ہے۔ ہرگز نہیں۔ چار حدیثیں پڑھ کرنام شیخ الکل نعوذ باللّٰہ من فتن ھٰذا الدھر و اھلھا ونعوذ باللّٰہ من جھلات الجاھلین۔
    یہ بھی واضح رہے کہ ہر یک باحیا دشمن اپنی
    دشمنی میں کسی حد تک جا کر ٹھہر جاتا ہے اور ایسے جھوٹوں کے استعمال سے اُس کو شرم آ جاتی ہے جن کی اصلیت کچھ بھی نہ ہو مگر افسوس کہ شیخ صاحب نے کچھ بھی اس انسانی شرم سے کام
    نہیں لیا جہاں تک ضرر رسانی کے وسائل اُن کے ذہن میں آئے انہوں نے سب استعمال کئے اور کوئی دقیقہ اٹھا نہ رکھا۔ اوّل تو لوگوں کو اٹھایا کہ یہ شخص کافر ہے اور دجال ہے اس کی ملاقات سے
    پرہیز کرو اور جہاں تک ہو سکے اس کو ایذا دو اور ہر یک ظلم سے اس کو دکھ دو سب ثواب کی بات ہے۔ اور جب اس تدبیر میں ناکام رہے تو گورنمنٹ انگریزی کو مشتعل کرنے کے لئے کیسے کیسے
    جھوٹ بنائے کیسے کیسے مفتریات سے مدد لی لیکن یہ گورنمنٹ دور اندیش اور مردم شناس گورنمنٹ ہے سکھوں کے قدم پر نہیں چلتی کہ دشمن اور خود غرض کے منہ سے ایک بات سن کر افروختہ
    ہو جائے بلکہ اپنی خداداد عقل سے کام لیتی ہے۔ سو گورنمنٹ دانشمند نے اس شخص کی تحریروں پر کچھ توجہ نہ کی اور کیونکر توجہ کرتی اس کو معلوم تھا کہ ایک خود غرض دشمن نفسانی جوش
    سے جھوٹی مخبری کر رہا ہے گورنمنٹ کو اس عاجز کے خاندان کے خیر خواہ ہونے پر بصیرت کامل تھی اور گورنمنٹ خوب جانتی تھی کہ یہ عاجز عرصہ چودہ سال سے برخلاف ان تمام مولویوں
    کے بار بار یہ مضمون شائع کر رہا ہے کہ ہم لوگ جو گورنمنٹ برطانیہ کی رعیت ہیں ہمارے لئے اللہؔ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم سے گورنمنٹ ھٰذا کے زیر اطاعت رہنا اپنافرض
    ہے اور بغاوت کرنا حرام۔ اور جو شخص بغاوت کا طریق اختیار کرے یا اس کے لئے
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 403
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 403
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/403/mode/1up
    کوئی مفسدانہ بنا ڈالے یا ایسے مجمع میں شریک ہو یا راز دار ہو تو وہ اللہ اور رسول کے حکم کی نافرمانی کر رہا ہے اور جو
    کچھ اس عاجز نے گورنمنٹ انگریزی کا سچا خیر خواہ بننے کے لئے اپنی کتابوں میں بیان کیا ہے وہ سب سچ ہے۔ نادان مولوی نہیں جانتے کہ جہاد کے واسطے شرائط ہیں سکھا شاہی لوٹ مار کا نام
    جہاد نہیں اور رعیت کو اپنی محافظ گورنمنٹ کے ساتھ کسی طور سے جہاد درست نہیں اللہ تعالیٰ ہرگز پسند نہیں کرتا کہ ایک گورنمنٹ اپنی ایک رعیت کے جان اور مال اور عزت کی محافظ ہو اور ان
    کے دین کے لئے بھی پوری پوری آزادی عبادات کے لئے دے رکھی ہو۔لیکن وہ رعیت موقع پا کر اس گورنمنٹ کو قتل کرنے کے لئے تیارہو یہ دین نہیں بلکہ بے دینی ہے اور نیک کام نہیں بلکہ بدمعاشی
    ہے۔ خداتعالیٰ ان مسلمانوں کی حالت پررحم کرے کہ جو اس مسئلہ کو نہیں سمجھتے اور اس گورنمنٹ کے تحت میں ایک منافقانہ زندگی بسر کر رہے ہیں جو ایمانداری سے بہت بعید ہے ۔ ہم نے سارا
    قرآن شریف تدبر سے دیکھا مگر نیکی کی جگہ بدی کرنے کی تعلیم کہیں نہیں پائی۔ ہاں یہ سچ ہے کہ اس گورنمنٹ کی قوم مذہب کے بارے میں نہایت غلطی پر ہے وہ اس روشنی کے زمانہ میں ایک
    انسان کو خدا بنا رہے ہیں اور ایک عاجز مسکین کو رب العالمین کا لقب دے رہے ہیں۔ مگر اس صورت میں تو وہ اور بھی رحم کے لائق اور راہ دکھانے کے محتاج ہیں کیونکہ وہ بالکل صراط مستقیم کو
    بھول گئے اور دور جا پڑے ہیں۔ ہم کو چاہیئے کہ ان کے احسان یاد کر کے ان کے لئے جنابِ الٰہی میں دعا کریں کہ اے خداوند قادر ذوالجلال ان کو ہدایت بخش اور ان کے دلوں کو پاک توحید کے لئے
    کھول دے اور سچائی کی طرف پھیر دے۔ تا وہ تیرے سچے اور کامل نبی اور تیری کتاب کو شناخت کر لیں اور دین اسلام ان کا مذہب ہو جائے۔ ہاں پادریوں کے فتنے حد سے زیادہ بڑھ گئے ہیں اور ان
    کی مذہبی گورنمنٹ ایک بہت شور ڈال رہی ہے مگر ان کے فتنے تلوار کے نہیں ہیں قلم کے فتنے ہیں سو اَے مسلمانوں تم بھی قلم سے اُن کا مقابلہ کرو اور حد سے مت بڑھو۔ خداتعالیٰ کا منشاء قرآن
    شریف میں صاف پایا جاتا ہے کہ قلم کے مقابل پر قلم ہے اور تلوار کے مقابل پر تلوار۔ مگر کہیں نہیں سنا گیا کہ کسی عیسائی پادری نے دین کے لئے تلوار بھی اٹھائی ہو۔ پھر تلوار کی تدبیریں کرنا قرآن
    کریم کو چھوڑنا ہے بلکہ صاف بے راہی اور الٰہی ہدایت سے سرکشی ہے ۔ جن میں روحانیت نہیں وہی ایسی تدابیریں کیا کرتے ہیں جو اسلام کا بہانہ کر کے اپنی نفسانی اغراض کو پورا کرنا چاہتے
    ہیں۔ خداتعالیٰ ان کو سمجھ بخشے۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 404
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 404
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/404/mode/1up
    افغانی مزاج کے آدمی اس تعلیم کو برا مانیں گے مگر ؔ ہم کو اظہار حق سے غرض ہے نہ ان کے خوش کرنے سے اور نہایت
    مضر اعتقاد جس سے اسلام کی روحانیت کو بہت ضرر پہنچ رہا ہے یہ ہے کہ یہ تمام مولوی ایک ایسے مہدی کے منتظر ہیں جو تمام دنیا کو خون میں غرق کر دے اور خروج کرتے ہی قتل کرنا شروع
    کر دے۔ اور یہی علامتیں اپنے فرضی مسیح کی رکھی ہوئی ہیں کہ وہ آسمان سے اترتے ہی تمام کافروں کو قتل کر دے گا اور وہی بچے گا جو مسلمان ہو جائے۔ ایسے خیالات کے آدمی کسی قوم کے
    سچے خیر خواہ نہیں بن سکتے بلکہ ان کے ساتھ اکیلے سفر کرنا بھی خوف کی جگہ ہے۔ شاید کسی وقت کافر سمجھ کر قتل نہ کر دیں اور اپنے اندر کے کفر سے بے خبر ہیں۔ یاد رکھنا چاہیئے کہ
    ایسے بیہودہ مسائل کو اسلام کی جُزو قرار دینا اورنعوذ باللہ قرآنی تعلیم سمجھنا اسلام سے ہنسی کرنا ہے اور مخالفوں کو ٹھٹھے کا موقعہ دینا ہے۔ کوئی عقل اس بات کو تجویز نہیں کر سکتی کہ کوئی
    شخص آتے ہی بغیر اتمام حجت کے لوگوں کوقتل کرنا شروع کر دے ۔ یا جس گورنمنٹ کے تحت میں زندگی بسر کرے اسی کی تباہی کے گھات میں لگا رہے۔ معلوم ہوتا ہے کہ ایسے لوگوں کی روحیں
    بکلی مسخ ہو چکی ہیں اور انسانی ہمدردی کی خصلتیں بتمامہا ان کے اندر سے مسلوب ہوگئی ہیں یا خالقِ حقیقی نے پیدا ہی نہیں کیں۔ خداتعالیٰ ہر ایک بلا سے محفوظ رکھے۔ نامعلوم کہ ہمارے اس بیان
    سے وہ لوگ کس قدر جلیں گے اور کیسے منہ مروڑ مروڑ کر کافر کہیں گے مگر ہمیں ان کی اس تکفیر کی کچھ پرواہ نہیں۔ ہر ایک شخص کا معاملہ خداتعالیٰ کے ساتھ ہے۔ ہمیں قرآن شریف کی کسی
    آیت میں یہ تعلیم نظر نہیں آتی کہ بے اتمام حجت مخالفوں کو قتل کرنا شروع کر دیا جاوے۔ ہمارے سید و مولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے تیرہ برس تک کفار کے جور و جفا پر صبر کیا۔ بہت سے دکھ
    دیے گئے دم نہ مارا۔ بہت سے اصحاب اور عزیز قتل کئے گئے ایک ذرا مقابلہ نہیں کیا اور دکھوں سے پِیسے گئے مگر سوائے صبر کے کچھ نہیں کیا۔ آخر جب کفار کے ظلم حد سے بڑھ گئے اور
    انہوں نے چاہا کہ سب کو قتل کر کے اسلام کو نابود ہی کر دیں تب خداتعالیٰ نے اپنے پیارے نبی کو اُن بھیڑیوں کے ہاتھ سے مدینہ میں سلامت پہنچا دیا۔ حقیقت میں وہی دن تھا کہ جب آسمان پر ظالموں
    کو سزا دینے کے لئے تجویز ٹھہر گئی ؂ تا دلِ مرد خُدا نامد بدرد۔ ہیچ قومے را خدا رسوا نکرد۔ مگر افسوس کہ کافروں نے اسی پر بس نہ کیا بلکہ قتل کے لئے تعاقب کیا اور کئی چڑھائیاں کیں اور طرح
    طرح
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 405
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 405
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/405/mode/1up
    کے دکھ پہنچائے۔ آخر وہ خداتعالیٰ کی نظرمیں اپنے بے شمار گناہوں کی وجہ سے اس لائق ٹھہر گئے کہ اُن پر عذاب نازل ہو۔
    اگران کی شرارتیں اس حد تک نہ پہنچتیں تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم ہرگز تلوار نہ اٹھاتے مگر جنہوں نے تلواریں اٹھائیں اور خداتعالیٰ کے حضور میں بے باک اور ظالم ثابت ہوئے وہ تلواروں
    سےؔ ہی مارے گئے۔ غرض جہاد نبوی کی یہ صورت ہے جس سے اہلِ علم بے خبر نہیں اور قرآن میں یہ ہدایتیں موجود ہیں کہ جو لوگ نیکی کریں تم بھی ان کے ساتھ نیکی کرو۔ جو تمہیں پناہ دیں اُن
    کے شکر گذار بنے رہو اورجو لوگ تمہیں دکھ نہیں دیتے ان کو تم بھی دکھ مت دو۔ مگر اِس زمانہ کے مولویوں کی حالت پر افسوس ہے کہ وہ نیکی کی جگہ بدی کرنے کو تیار ہیں اور ایمانی روحانیت
    اور انسانی رحم سے خالی۔ اللھم اصلح امۃ محمد صلی اللّٰہ علیہ وسلم۔ اٰمین۔
    شیخ محمد حسین بطالوی کا ہمارے کافر ٹھہرانے پر اصرار اور ہماری طرف سے
    ہمارے اسلامی عقیدہ کا ثبوت اور
    نیز شیخ صاحب موصوف کے لئے ستائیس روپیہ کاانعام
    اگر وہ رسالہ سر الخلافہ کے مقابل پر رسالہ لکھ کرشائع کریں
    خدا تعالیٰ جانتا ہے کہ ہم نے ایک ذرہ اسلام سے خروج نہیں کیابلکہ جہاں
    تک ہمارا علم اور یقین ہے ہم اُن سب باتوں پر قائم اور راسخ ہیں جو نصوص قرآنیہ اور حدیثیہ سے ثابت ہوتی ہیں اور ہمیں بڑا افسوس ہے کہ شیخ محمد حسین صاحب اور دوسرے ہمارے مخالفوں نے
    صرف یہی نہیں کیا کہ ہمیں کافر اور دجّال بنایا اور خلو د جہنم ہماری سزا ٹھہرائی بلکہ قرآن اور حدیث کو بھی چھوڑ دیا اور ہم بار بار کہتے ہیں کہ ہم اُن کی نفسانی خواہشوں اور غلطیوں اور خطاؤں
    کو تو کسی طرح قبول نہیں کر سکتے لیکن اگر کوئی سچی بات اور کتاب اللہ اور حدیث کے موافق کوئی عقیدہ اُن کے پاس ہو جس کے ہم بفرض محال مخالف ہوں تو ہم ہر وقت اس کے قبول کرنے کے
    لئے تیار ہیں۔ ہم نے انہیں دکھلا دیا اور ثابت کر دیا کہ توفّی کے لفظ میں کتاب الٰہی کا عام محاورہ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بول چال کا عام محاورہ اور صحابہ کی روز مرہ بول چال
    کا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 406
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 406
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/406/mode/1up
    عام محاورہ اور اس وقت سے آج تک عرب کی تمام قوم کا عام محاورہ مارنے کے معنوں پر ہے اور نہ اور کچھ۔ اور ہم نے یہ
    بھی دکھلایا کہ جو معنی توفی کے لفظ میں رسول اللہ صلی اللہ وسلم سے ثابت ہوئے وہ اسی کی طرف اشارہ کرتے ہیں کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام فوت ہو گئے بخاری کھول کر دیکھو اور پاک دل کے
    ساتھ اس آیت میں غور کرو کہ مَیں قیامت کے دن اسی طرح فلما توفّیتنیہوں گا جیسا کہ ایک عبد صالح یعنی حضرت عیسیٰ ؔ علیہ السلام نے کہا اور سوچو کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ
    کلمہ لفظ توفّی کے لئے کیسی ایک تفسیر لطیف ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بغیر کسی تغییر اور تبدیل کے لفظ متنازعہ فیہ کا مصداق اپنے تئیں ایسا ٹھہرا لیا جیسا کہ آیت موصوفہ میں
    حضرت عیسیٰ علیہ السلام اس کے مصداق تھے۔ اب کیا ہمیں جائز ہے کہ ہم یہ بات زبان پر لاویں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم آیت فلما توفیتنی * کے حقیقی مصداق نہیں تھے اور حقیقی مصداق
    عیسیٰ علیہ السلام ہی تھے اور جو کچھ اس آیت سے درحقیقت خداتعالیٰ کا منشاء تھا اور جو معنے توفّی کے واقعی طور پر اس جگہ مراد الٰہی تھی اور قدیم سے وہ مراد علم الٰہی میں قرار پا چکی تھی
    یعنی زندہ آسمان پر اٹھائے جانا نعوذ باللہ اس خاص معنی میں آنحضرت صلعم شریک نہیں تھے بلکہ آنحضرت نے اس آیت کو اپنی طرف منسوب کرنے کے وقت
    * بعض نادان کہتے ہیں کہ
    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی کلام میں کما کا لفظ موجود ہے جو کسی قدر فرق پر دلالت کرتا ہے اس لئے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی توفی اور حضرت عیسیٰ کی توفی میں کچھ فرق چاہیئے۔
    مگر افسوس کہ یہ نادان نہیں سوچتے کہ مشبہ مشبہ بہ کی طرز واقعات میں خواہ کچھ فرق ہو لیکن لغات میں فرق نہیں پڑ سکتا۔ مثلاً کوئی کہے کہ جس طرح زید نے روٹی کھائی میں نے بھی اسی
    طرح روٹی کھائی۔ سو اگرچہ روٹی کھانے کے وضع یا عمدہ اور ناقص ہونے میں فرق ہو مگر روٹی کا لفظ جو ایک خاص معنوں کے لئے موضوع ہے اس میں تو فرق نہیں آئے گا۔ یہ تو نہیں کہ ایک جگہ
    روٹی سے مراد روٹی اور دوسری جگہ پتھر ہو۔ لغات میں تو کسی طرح تصرف جائز نہیں اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک اور اسی قسم کا مقولہ ہے جو ابن تیمیّہ نے زاد المعاد میں نقل کیا ہے
    اور وہ عبارت یہ ہے۔ قال یا معشر قریش ما ترون انی فاعل بکم قالوا خیرًا اخ کریم وابن اخ کریم قال فانی اقول لکم کما قال یوسف لاخوتہ لا تثریب علیکم الیوم اذھبوا فانتم الطلقاء الصفحہ۴۱۵۔ اب دیکھو
    تثریب کا لفظ جن معنوں سے حضرت یوسف کے قول میں ہے انہیں معنوں سے آنحضرت صلعم کے قول میں ہے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 407
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 407
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/407/mode/1up
    اس کے معنوں میں تغییر و تبدیل کردی ہے اور دراصل جب اس لفظ کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف منسوب کریں تو
    اس کے اور معنے ہیں اور جب حضرت مسیح کی طرف یہ لفظ منسوب کریں تو پھر اس کے وہی حقیقی معنے لئے جاویں گے جو خدائے تعالیٰ کے قدیم ارادہ میں تھے۔ پس اگر یہی بات سچ ہے تو
    علاوہ اس فساد صریح کے کہ ایک نبی کی شان سے بہت بعید ہے کہ وہ ایک قراردادہ معنوں کو توڑ کر اُن میں ایک ایسا تصرف کرے کہ بجز تحریف معنوی کے اور کوئی دوسرا نام اِس کا ہو ہی نہیں
    سکتا۔ دوسرا فساد یہ ہے کہ جس اتحاد مقولہ کا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ارادہ فرمایا یعنی فلمّا توفّیتنی کا وہ اتحاد بھی تو قائم نہ رہا کیونکہ اتحاد تو تب قائم رہتا کہ توفی کے معنوں میں
    آنحضرت اور حضرت عیسیٰ شریک ہو جاتے۔ مگر وہ شراکت تو میسر نہ آئی پھر اتحاد کس بات میں ہوا۔ کیا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو کوئی اور لفظ نہیں ملتا تھا جو آپ نے ناحق ایک ایسے
    اشتراک کی طرف ہاتھ پھیلایا جس کا آپ کو کسی طرح سے حق نہیں پہنچتا تھا۔ بھلا زمین میں دفن ہونے والے اور آسمان پر زندہ اٹھائے جانے والے میں ایک ایسے لفظ میں کہ یا مَرنے کے اور یا زندہ
    اٹھائے جانے کے معنے رکھتا ہے کیونکر اشتراک ہو۔ کیا ضدین ایک جگہ جمع ہوسکتی ہیں۔ اور اگر آیت فلما توفیتنی میں توفی کے معنے مارنا نہیں تھا تو پھر کیاامام بخاری کی عقل ماری گئی کہ وہ اپنی
    صحیح میں اسی معنے کی تائید کے لئے ایک اور آیت دوسرے مقام سے اٹھا کر اس مقام میں لے آیا یعنی آیت انّی متوفیک اور پھر اسی پر بس نہ کیا بلکہ قول ابن عباس رضی اللہ عنہ بھی اس جگہ جڑ دیا
    کہ متوفیک ممیتک یعنی متوفیک کے یہ معنی ہیں کہ مَیں تجھے مارنے والا ہوں۔ اگر بخاری کا یہ مطلب نہیں تھا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے تمثیلی معنوں کو ابن عباس کے صریح معنوں کے
    ساتھ زیادہ کھول دے تو ان دونوں آیتوں کو جمع کرنے اورؔ ابن عباس کے معنوں کے ذکر سے کیا مطلب تھا اور کون سا محل تھا کہتوفّی کے معنے کی بحث شروع کر دیتا۔ پس درحقیقت امام بخاری نے
    اس کارروائی سے توفّی کے معنوں میں جو کچھ اپنا مذہب تھا ظاہر کر دیا۔ سو اِس جگہ ہمارے تائید دعویٰ کے لئے تین چیزیں ہو گئیں۔ اوّل آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا قول مبارک کہ جیسے عبد
    صالح یعنی عیسیٰ نے
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 408
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 408
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/408/mode/1up
    فلما توفیتنیکہا۔ مَیں بھی فلما توفیتنی کہوں گا۔ دوسر ے ابن عباسؓ سے توفّیکے لفظ کے معنے مارنا ہے۔ تیسر ے امام بخاری
    کی شہادت جو اس کی عملی کارروائی سے ظاہر ہو رہی ہے۔
    اب سوچ کر دیکھو کہ کیا ہم نے حدیث اور قرآن کوچھوڑا یا ہمارے مخالفوں نے۔ کیا اُنہوں نے بھیتوفّیکے معنے رسول اللہ صلی اللہ
    علیہ وسلم اور کسی صحابی سے ثابت کئے جیسا کہ ہم نے کئے ہیں اور پھر بھی ہم اِس بات کو قبول کرنے کے لئے تیار ہیں کہ اگر ہمارے مخالف اِس ثبوت کے مقابل پر جو توفّی کی نسبت ہم نے پیش
    کیا اب بھی کوئی دوسرا ثبوت پیش کریں یعنی توفّی کے معنوں کے بارے میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے کوئی اور حدیث ہم کو دکھلاویں اور اس کے ساتھ کسی اور صحابی کی طرف سے بھیتوفّی
    کے معنی تائیدی طور پر پیش کریں اور بخاری جیسے کسی امام حدیث کی بھی ایسی ہی شہادت توفّی کے معنوں کے بارہ میں پیش کر دیں تو ہم اس کو قبول کر لیں گے مگر یہ کیسی چالاکی ہے کہ خود
    تو حدیث اورقرآن کو چھوڑ دیں اور الٹا ہم پرالزام دیں کہ یہ فرقہ قرآن اور حدیث سے باہر ہو گیا ہے۔ اے مخالف مولویو خدا تم پر رحم کرے ذرہ غور سے توجہ کرو تا تمہیں معلوم ہو کہ یہ یقینی اور
    قطعی بات ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ سے مقام متنازعہ فیہ میں توفّی کے معنی بجز مارنے کے اور کچھ بھی ثابت نہیں ہوئے اور جو شخص اس ثابت شدہ معنی کو چھوڑتا ہے وہ
    قرآن کریم کی تفسیر بالرائے کرتا ہے کیونکہ حدیث کی رو سے بجز مارنے کے اور کوئی معنے توفّی آیت متنازعہ فیہ میں منقول نہیں۔ اسی وجہ سے شاہ ولی اللہ صاحب نے اپنی تفسیر فوزالکبیر میں
    جو صرف آثار نبوی اور اقوال صحابہ کے التزام سے کی گئی ہے متوفیک کے معنے صرف ممیتک لکھے ہیں۔اگر ان کو کوئی مخالف قول ملتا تو ضرور وہ او کے لفظ سے وہ معنے بھی بیان کر جاتے ۔
    اب ہمارے مخالفوں کو شرم کرنا چاہیئے کہ کیوں وہ نصوص صریحہ کو صریح چھوڑ بیٹھے ہیں۔ پس اے بے باک لوگو خدا تعالیٰ سے ڈرو۔ کیا تم نے ایک دن مرنا نہیں۔ اور نزول کے لفظ پر آپ لوگ ناز
    نہ کریں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اِس لفظ کا کچھ فیصلہ نہیں فرمایا کہ یہ نزول کن معنوں سے نزول ہے۔ کیونکہ نزول کئی قسم کے ہوا کرتے ہیں اور
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 409
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 409
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/409/mode/1up
    مسافر بھی ایک زمین سے دوسری زمین میں جاؔ کر نزیل ہی کہلاتا ہے۔ قرآن کریم میں ان نزولوں کا بھی ذکر ہے جو روحانی ہیں
    جیسے اللہ تعالیٰ فرماتا ہے جو ہم نے لوہا اتارا ہم نے لباس اتارا ہم نے چارپائے اتارے۔ اور ایلیا یعنی یوحنا کے قصہ سے جس پر یہود اور نصاریٰ کا اتفاق ہے اور بائیبل میں موجود ہے صاف کھل گیا
    ہے کہ فوت شدہ انبیاء کا نزول اس دنیا میں روحانی طور پر ہوا کرتا ہے نہ جسمانی۔ وہ آسمان سے تو ہرگز نہیں نازل ہوتے مگر اُن کی روحانی خصلتیں کسی مثیل میں باذن اللہ داخل ہو کر روحانی طور
    پر نازل ہو جاتی ہیں اور ان کی ارادات کا شخص مثیل پر ایک سایہ ہوتا ہے اس لئے اس مثیل کا ظہور ممثل بہ کا نزول سمجھا جاتا ہے۔ بعض اولیاء کرام نے بھی اس قسم کے نزول کا تصوف کی کتابوں
    میں ذکر کیا ہے۔ غرض عنداللہ یہ قسم بھی ایک نزول کی قسم سے ہے اور اگر یہ نزول نہیں تو پھر خدائے تعالیٰ کی کتابیں باطل ہوتی ہیں۔ ایلیا کا قصہ جو بائیبل میں موجود ہے ایک ایسا مشہورواقعہ ہے
    جویہود اور نصاریٰ دونوں فرقوں میں مسلّم ہے اور یہ کمال حماقت ہو گی کہ ہم یہ کہیں کہ ان دونوں فرقوں نے باہم مل کر اس مقام کی آیات کو تحریف کردیا ہے بلکہ نصاریٰ کو یہ قصہ نہایت ہی مُضر
    پڑا ہے اور اگر اِس جگہ نزولِ ایلیا کے ظاہری معنے کریں تو یہود سچے ٹھہرتے ہیں اور ثابت ہوتا ہے کہ حضرت مسیح علیہ السلام سچے نبی نہیں تھے کیونکہ اب تک حضرت ایلیا علیہ السلام آسمان
    سے نازل نہیں ہوئے اور بائیبل کے رو سے ضرور تھا کہ وہ حضرت مسیح سے پہلے نازل ہو جاتے۔ حضرت مسیح کو یہ ایک بڑی دِقت پیش آئی تھی کہ یہود نے ان کی نبوت میں یہ عُذر پیش کر دیا
    جو درحقیقت ایک پہاڑ کی طرح تھا۔ پس اگر یہ جواب صحیح ہوتا کہ نزول ایلیا کا قصہ محرف ہے تو حضرت عیسیٰ علیہ السلام یہود کے آگے اسی جواب کوپیش کرتے اور کہتے کہ یہ بات سرے
    سے ہی جھوٹ ہے کہ ایلیا پھر دنیا میں آئے گا اور ضرور ہے کہ وہ مسیح سے پہلے بجسمہ العنصری آسمان سے اتر آوے۔ مگرانہوں نے یہ جواب نہیں دیا بلکہ آیت کی صحت کو مسلّم رکھ کرنزول
    کو نزول روحانی ٹھہرایا۔ اور انہیں تاویلوں کے سبب سے یہودیوں نے انہیں ملحد کہا اور بالاتفاق فتویٰ دیا کہ یہ شخص بے دین اور کافر ہے کیونکہ نصوص توریت کو بلا قرینہ صارفہ ان کے ظاہری
    معنوں سے پھیرتا ہے۔ اس میں کچھ شک نہیں کہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 410
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 410
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/410/mode/1up
    اگر حضرت عیسیٰ علیہ السلام تحریف کاعذر پیش کر دیتے اور کہہ دیتے کہ تمہاری آسمانی کتابوں کے یہ مقامات محرف ہو
    گئے ہیں تو اس جواب سے بھی اگرچہ وہ یہود کا منہ تو بند نہیں کر سکتے تھے تاہم اُن کے خوارق اورمعجزات کو دیکھ کر بہت سے لوگ سمجھ جاتے کہ ممکن ہے کہ یہ دعویٰ تحریف کاسچا ہی ہو
    کیونکہ یہ شخص مؤید من اللہ اورالہام یافتہ اور صاحبِ معجزات ہے لیکن حضرت مسیح نے تو ایسا نہ کیا بلکہ آیت کی صحت کا ایلیا کے نزول کی نسبت اقرار کر دیا جس کی وجہ سے اب تک عیسائی
    مصیبت میں پڑے ہوئے ہیں اور یہود کے آگے بات بھیؔ نہیں کر سکتے اور یہود ٹھٹھے سے کہتے ہیں کہ عیسیٰ اُس وقت نبی ٹھہر سکتا ہے کہ جب ہم خدائے تعالیٰ کی تمام کتابوں کو جھوٹی قرار
    دے دیں اور اَب تک عیسائیوں کو موقعہ نہیں ملا کہ اس مقام میں تحریف کا دعویٰ کر دیں اور اس بلا سے نجات پاویں کیونکہ اب وہ انیس سو برس کے بعد کیونکر اس قول کی مخالفت کر سکتے ہیں جو
    حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے منہ سے نکل گیا۔ یہ مقام ہمارے بھائی مسلمانوں کے لئے بہت غور کے قابل ہے۔ اُن کو سوچنا چاہیئے کہ جن ظاہری معنوں پر وہ زور دیتے ہیں اگر وہی معنے سچے ہیں
    تو پھر حضرت عیسیٰ کسی طور سے بھی نبی نہیں ٹھہر سکتے بلکہ وہ نبی اللہ تو اُسی حالت میں ٹھہریں گے جب کہ حضرت ایلیا نبی کے نزول کو ایک روحانی نزول مانا جاوے۔
    افسوس کہ اٹھارہ
    سو نوے برس گذرنے کے بعد وہی یہودیوں کا جھگڑا اِن مولویوں اور فقیہوں نے ا س عاجز کے ساتھ شروع کر دیا اور ایک بچہ بھی سمجھ سکتا ہے کہ جس پہلو کو اِس عاجز نے اختیار کیا وہ حضرت
    عیسیٰ کا پہلو ہے اور جس پہلو پر مخالف مولوی جم گئے وہ یہودیوں کا پہلو ہے۔ اب مولویوں کے پہلو کی نحوست دیکھو کہ اس کو اختیار کرتے ہی یہودیوں سے اُن کو مشابہت نصیب ہوئی ۔ ابھی
    کچھ نہیں گیا اگر سمجھ لیں۔ اب جبکہ اس تحقیقات سے نزول جسمانی کا کچھ پتہ نہ لگا اور نہ پہلی کتابوں میں اس کی کوئی نظیر ملی اور ملا تو یہ ملا کہ ایلیا نبی کے دنیا میں دوبارہ آنے کا جو وعدہ
    تھا اُس سے مراد روحانی نزول تھا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 411
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 411
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/411/mode/1up
    نہ ظاہری تو اِس تحقیقات سے ثابت ہوا کہ جب سے دنیا کی بنا پڑی ہے یعنی حضرت آدم سے لے کر تا ایں دم کبھی کسی انسان
    کی نسبت نزول کا لفظ جب آسمان کی طرف نسبت دیا جائے جسمانی نزول پر اطلاق نہیں پایا اورجو دعویٰ کرے کہ پایا ہے وہ اس کا ثبوت پیش کرے۔ اور جب اب تک نزول جسمانی پر اطلاق نہیں پایا تو
    اب خلاف سنت اللہ اور محاورہ قدیمہ کے جو اس کی کتابوں میں پایا جاتا ہے کیوں کر اطلاق پائے گا ولن تجد لسنۃ اللّٰہ تبدیلا۔
    اور پھر ہم تنزّل کے طور پر کہتے ہیں کہ اگر کوئی غبی اب بھی اِس
    صریح اور واضح بیان کو نہ سمجھے تو اتنا تو ضرور سمجھتا ہو گا کہ متنازعہ فیہ مقام میں توفی کا لفظ وہ محکم اور بیّن لفظ ہے جس کے معنے فیصلہ پا گئے اور قطعی طورپر ثابت ہو گیا کہ
    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے معنے مارنا ہی فرمایا ہے اور حضرت ابن عباسؓ نے بھی اِس کے معنے مارنا ہی لکھا ہے اور امام بخاری نے بھی مارنے پر ہی عملی طور پر شہادت دی
    ہے۔ لیکن اس کے مقابل پر نزول کا جو لفظ ہے اس کی نسبت اگر ایک بڑے سے بڑا متعصب کچھ تاویلیں کرے تو اس سے زیادہ نہیں کہہ سکتا کہ وہ ایک لفظ ہے جو متشابہات میں داخل ہے۔ لیکن فیصلہ
    شدہ لفظ اور اُس کے بیّن اور محکم معنوں کو چھوڑ کر متشابہات کی طرف دوڑنا انہیں لوگوؔ ں کا کام ہے جن کے دل میں مرض ہے۔ اگر ایمان ہے تو وہ لفظ جو بیّنات اور محکمات میں داخل ہو گیا اُسی
    سے پنجہ مارو نہ کسی ایسے لفظ سے جو متشابہات میں داخل رہا اور متشابہات کی تاویل خداتعالیٰ کے علم کی طرف حوالہ کرو تا نجات پاؤ۔
    بڑی بھاری نزاع جو ہم میں اور ہمارے مخالفوں میں
    ہے یہی ہے جو مَیں نے بیان کردی ہے اور ماحصل یہی نکلا کہ ہم بیّنات اور محکمات سے پنجہ مارتے ہیں جوقرآن سے ثابت ،حدیث سے ثابت، اقوال صحابہ سے ثابت، پہلی کتابوں کے نظائر سے
    ثابت، سنت اللہ سے ثابت، امام بخاری کے قول سے ثابت، امام مالک کے قول سے ثابت،
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 412
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 412
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/412/mode/1up
    ابن قیّم کے قول سے ثابت، ابن تیمیّہ کے قول سے ثابت اور اسلام کے بعض دوسرے فرقوں کے اعتقاد سے ثابت۔ مگر ہمارے
    مخالفوں نے صرف نزول کا ذوالوجوہ لفظ پکڑا ہوا ہے جو لغت اور قرآن اور پہلی آسمانی کتابوں کے رو سے بہت سے معنوں پر اطلاق پاتا ہے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کہیں تشریح نہیں
    کی کہ اِس سے حضرت مسیح علیہ السلام کا جسمانی نزول مراد ہے نہ اور کچھ کیوں کہ جب کہ نبیوں کے روحانی نزول کے بارے میں ایک پہلی امت قائل ہے اور یہود جو حضرت ایلیا کے جسمانی
    نزول کے منتظر تھے اُن کا غلطی پر ہونا حضرت مسیح کی زبان سے ثابت ہو گیا اور اِس سنت اللہ کا کہیں پتہ نہ ملا جو جسمانی نزول بھی کبھی کسی زمانہ میں گذر چکا تو یہی معنے متعین ہوئے کہ
    نزول عیسیٰ علیہ السلام سے مراد روحانی نزول ہے ورنہ اگر جسمانی نزول بھی سنت اللہ میں داخل ہے تو خداتعالیٰ نے یہودیوں کو کیوں اِس قدر ابتلا میں ڈالا کہ وہ اب تک اِس خیال میں مبتلا ہیں کہ
    سچا مسیح تب ہی آئے گا کہ جب ایلیا نبی آسمان سے نازل ہو لے۔ جبکہ خداتعالیٰ نے صاف وعدہ کیا تھا کہ ایلیا نبی دوبارہ دنیا میں آئے گا اور پھر اُس کے بعد مسیح آئے گا تو اِس وعدہ کو اس کی
    ظاہری صورت پر پورا کیا ہوتا اور ایلیا نبی کو آسمان سے زمین پر بجسمہ العنصری اتارا ہوتا تا یہود لوگ جیسا کہ ایک مدت دراز سے پیشگوئی کے معنے سمجھے بیٹھے تھے اور اُن کے فقیہوں اور
    عالموں اور محدثوں نے نزول جسمانی ایلیا کو اپنے اعتقاد میں داخل کر لیا تھا اس پیشگوئی کا اپنے اعتقاد کے موافق پورا ہونا دیکھ لیتے اور پھر اُن کو حضرت مسیح کی نبوت میں کچھ بھی شک باقی
    نہیں رہتا۔ مگر اُن پر یہ کیسی مصیبت پڑی کہ ان کی کتابوں میں تو ان کو صاف صاف اور صریح لفظوں میں بتلایا گیا کہ درحقیقت ایلیا ہی دوبارہ دنیا میں آئے گا اور وہی مسیح سچا ہو گا جو ایلیا کے
    نزول کے بعد آوے لیکن یہ پیشگوئی اپنے ظاہری معنوں پر پوری نہ ہوئی اور حضرت مسیح تشریف لے آئے اور اُن کو یہود کے سا ؔ منے سخت مشکلات پیش آگئے۔ آخرکار ایک ایسی دور از حقیقت
    تاویل پر زور ڈالا گیا جس سے یہودیوں کو
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 413
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 413
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/413/mode/1up
    کہنا پڑا کہ عیسیٰ سچا مسیح نہیں ہے بلکہ ایک مکار اور ملحد ہے جو اپنے مطلب کے لئے ایک صریح پیشگوئی کو ظاہر سے
    پھیر کر روحانی نزول کا قائل ہے۔ سو اس وجہ سے کروڑہا آدمی کافر اور منکر رہ کر داخل جہنم ہوئے۔ اے مسلمانوں اس مقام کو ذرا غور سے پڑھو کہ آپ لوگوں کی بات یہود کی بات سے ایسی مل
    گئی کہ دونوں باتیں ایک ہی ہو گئیں اور یقیناً سمجھو کہ مومن کی خصلت میں داخل ہے کہ وہ دوسرے کے حال سے نصیحت پکڑتا ہے۔ فاعتبروا یا اولی الابصار واسئلوا اھل الذکر ان کنتم لا تعلمون۔
    اگر کہو کہ ہم کیونکر یقین کریں کہ یہ واقعہ صحیحہ ہے تو اس کا جواب یہی ہے کہ یہ مسئلہ دو قوموں کا متواترات سے ہے اور صرف یہ کہنا کہ وہ کتابیں محرف مبدل ہو گئیں ایسے متواترات کو
    کمزور نہیں کر سکتا۔ ہاں اس صورت میں ہو سکتا تھا کہ خدا تعالیٰ قرآن کریم میں اس قول کی تکذیب کرتا۔ پس جبکہ اس مسئلہ کی تکذیب حدیث اور قرآن سے ثابت نہیں ہوتی تو ہم متواترات قولی سے
    کسی طرح انکار نہیں کر سکتے۔* بلکہ اگر یہ بھی فرض کر لیں کہ وہ تمام کتابیں خدا تعالیٰ کی طرف سے نازل ہی نہیں ہوئیں اور سراسر انسانی تالیف ہے۔ پھر بھی ہم تاریخی سلسلہ کو کسی طرح مٹا
    نہیں سکتے اور جو امر تاریخی طرز پر دو قوموں کے متفق علیہ شہادت سے ثابت ہو گیا اب وہ شکی اور ظنی نہیں ٹھہر سکتا۔ جیسا کہ ہم وجود رامچندر اور کرشن اور بکر ماجیت اور بدھ سے انکار
    نہیں کر سکتے حالانکہ ہم ان کتابوں کو خدائے تعالیٰ کی طرف سے نہیں سمجھتے۔ پھر کیوں انکار نہیں کر سکتے؟ تاریخی تواتر کی وجہ سے۔
    بعض نیم ملا عجیب جہالت کے گڑھے میں پڑے
    ہوئے ہیں۔ انہوں نے جو ایک تحریف کا لفظ سن رکھا ہے محل بے محل پر اسی کو پیش کر دیتے ہیں اور تاریخی تواترات کو نظر انداز کر دیا ہے۔ بلکہ ان کو مٹانا چاہتے ہیں۔ یہ نہایت شرمناک بات ہے
    کہ ہماری قوم میں ایسے لوگ بھی
    * نوٹ: آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا آنے والے مسیح کو اپنی امت میں سے قرار دینا روحانی نزول کا مؤید ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ آنحضرت صلی
    اللہ علیہ وسلم کی مراد روحانی نزول تھا نہ اور کچھ۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 414
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 414
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/414/mode/1up
    مولوی کے نام سے مشہور ہیں کہ متواترات قومی کو جو تاریخ کے سلسلے میں آگئے ہیں قبول نہیں کرتے اور خواہ نخواہ غیر
    متعلقہ جزئیات کو تحریف میں داخل کرتے ہیں اور یہ نہیں سوچتے کہ اس موقعہ پر اگر یہودی تحریف کرتے تو وہ تحریف عیسائیوں کے مقصد کے مخالف ٹھہرتی اور اگر عیسائی تحریف کرتے تو
    یہودیوں کے دعویٰ کے برعکس ہوتی اور جو لفظ توریت کی کتابوں میں موجود ہیں وہ عیسائیوں کے مقصد کو نہایت مضر پڑے ہیں۔ کیوؔ نکہ ان سے حضرت ایلیا کے نزول جسمانی کی پیشگوئی قبل
    از ظہور حضرت مسیح یقینی طور پر ثابت ہوتی ہے تو اس صورت میں تحریف کرنے میں عیسائیوں کا یہودیوں کے ساتھ اتفاق کرنا ایسا ہے جیسا کہ کوئی اپنے ہاتھ سے اپنا ناک کاٹے۔ وجہ یہ کہ اگر
    نزول ایلیا کی پیشگوئی کو ظاہر پر ہی حمل کریں تو پھر حضرت عیسیٰ کا سچا نبی ہونا محالات میں سے ہے کیونکہ اب تک ایلیا نبی بجسمہ العنصری آسمان سے نازل نہیں ہوا تو پھر عیسیٰ جس کا اس
    کے بعد آنا ضروری تھا کیونکر پہلے ہی آ گیا۔ اور اگر ظاہر پر حمل نہ کریں اور نزول ایلیا کو نزول روحانی قرار دیں تو پھر نزول عیسیٰ کی پیشگوئی میں کیوں ظاہر پر جم بیٹھیں۔ نزول برحق اور اس پر
    ہم ایمان لاتے ہیں بلکہ اس کا ظہور بھی دیکھ لیا لیکن جن معنوں کے رو سے یہود بندر اور سور کہلائے اور خدا تعالیٰ کی کتابوں میں *** ٹھہرے اس طور کے نزول کے معنے بعد پہنچنے ہدایت کے
    وہی کرے جس کو بندر اور سؤر بننے کا شوق ہو۔ خدا تعالیٰ صادق مومنوں کو ایسے معنوں سے اپنی پناہ میں رکھے جو اس *** کی بشارت دیتے ہیں جو پہلے یہود پر وارد ہو چکی ہے۔ زیادہ اس
    مسئلہ میں کیا لکھیں اور کیا کہیں جن کو خدا تعالیٰ ہدایت نہ دے ہم کیونکر دے سکتے ہیں۔ جن کی آنکھیں وہ مالک نہ کھولے ہم کیوں کر کھول سکتے ہیں۔ جن مُردوں کو وہ زندہ نہ کرے ہم کیوں کر کریں۔
    اے مالک و قادر خدا اب فضل کر اور رحم کر اور اس تفرقہ کو درمیان سے اٹھا اور سچ ظاہر کر اور جھوٹ کو نابود کر کہ سب قدرت اور طاقت اور رحمت تیری ہی ہے۔ آمین آمین آمین
    پھر بعد اس
    کے واضح رہے کہ فرشتوں کے نزول سے بھی ہمیں انکار نہیں۔ اگر کوئی ثابت
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 415
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 415
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/415/mode/1up
    کر دے کہ فرشتوں کا نزول اسی طرح ہوتا ہے کہ وہ اپنے وجود کو آسمان سے خالی کر دیں تو ہم بشوق اس ثبوت کو سنیں گے
    اور اگر درحقیقت ثبوت ہوگا تو ہم اس کو قبول کر لیں گے۔ جہاں تک ہمیں معلوم ہے فرشتوں کا وجود ایمانیات میں داخل ہے۔ خدا تعالیٰ کا نزول سماء الدنیا کی طرف اور فرشتوں کا نزول دونوں ایسی
    حقیقتیں ہیں جو ہم سمجھ نہیں سکتے۔ ہاں کتاب اللہ سے اتنا ثابت ہوتا ہے کہ خلق جدید کے طور پر زمین پر فرشتوں کا ظہور ہو جاتا ہے دحیہ کلبی کی شکل میں جبرئیل کا ظاہر ہونا خلق جدید تھا یا کچھ
    اور تھا۔ پھر کیا یہ ضرور ہے کہ پہلی خلق کو نابود کر لیں پھر خلق جدید کے قائل ہوں بلکہ پہلا خلق بجائے خود آسمان پر ثابت اور قائم ہے اور دوسرا خلق خداتعالیٰ کی وسیع قدرت کا ایک نتیجہ ہے کیا
    خدا تعالیٰ کی قدرت سے بعید ہے کہ ایک وجود دوؔ جگہ دو جسموں سے دکھاوے۔ حاشا وکلا ہرگز نہیں۔ الم تعلم ان اللّٰہ علٰی کل شیء قدیر۔
    پھر شیخ بطالوی صاحب نے اپنی دانست میں ہماری کتاب
    تبلیغ کی کچھ غلطیاں نکالی ہیں اور ہم افسوس سے لکھتے ہیں کہ تعصب کے جوش سے یا نادانی کی وجہ سے صحیح اور باقاعدہ ترکیبوں اور لفظوں کو بھی غلطی میں داخل کر دیا۔ اگر اس امر کے لئے
    کوئی خاص مجلس مقرر ہو تو ہم ان کو سمجھا ویں کہ ایسی شتاب کاری سے کیا کیا ندامتیں اٹھانی پڑتی ہیں۔ قیامت کی نشانیاں ظاہر ہو گئیں۔ یہ علم اور نام مولوی انّا للّٰہ و انّا الیہ راجعون۔ وہ غلطیاں جو
    انہوں نے بڑی جانکاہی سے نکالی ہیں اگر وہ تمام اکٹھی کر کے لکھی جائیں تو دو یا ڈیڑھ سطر کے قریب ہوں گی اور ان میں اکثر تو سہو کاتب ہیں اور تین ایسی غلطیاں جو بوجہ نہ میسر آنے نظر ثانی
    یا طفرہ نظر کے رہ گئی ہیں اور باقی شیخ صاحب کی اپنی عقل کی کوتاہی اور سمجھ کا گھاٹا ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ شیخ صاحب نے کبھی لسان عرب کی طرف توجہ نہیں کی۔ بہتر تھا کہ چپ
    رہتے اور اور بھی اپنی پردہ دری نہ کراتے۔ ہمیں شوق ہی رہا کہ شیخ صاحب ہماری کتابوں کے مقابل پر کوئی فصیح بلیغ رسالہ نظم اور نثر میں نکالیں اور ہم سے انعام لیں اور ہم سے اقرار کرا لیں کہ
    درحقیقت وہ مولوی اور عربی دان ہیں۔
    میں کئی دفعہ بیان کر چکا ہوں کہ یہ رسائل جو لکھے گئے ہیں تائید الٰہی سے لکھے گئے ہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 416
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 416
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/416/mode/1up
    مَیں ان کا نام وحی اور الہام تو نہیں رکھتا مگر یہ تو ضرور کہتا ہوں کہ خدا تعالیٰ کی خاص اور خارق عادت تائید نے یہ
    رسالے میرے ہاتھ سے نکلوائے ہیں۔ میں نے کئی مرتبہ شائع کیا کہ اگر شیخ صاحب موصوف جن کی نسبت میرا اعتقاد ہے کہ وہ خذلان میں پڑے ہوئے ہیں اور علم عربیت سے کسی اتفاق سے محروم
    رہ گئے ہیں مقابلہ کر کے دکھلا دیں تو وہ اس مقابلہ سے میرے ان تمام دعاوی کو نابود کر دیں گے۔ مگر شیخ صاحب کیوں اس طرف متوجہ نہیں ہوتے کونسی مصیبت ہے جو ان کو مانع ہے۔ بس یہی
    مصیبت ہے کہ وہ لسان عرب سے بے بہرہ اور آج کل خذلان کی حالت میں مبتلا ہیں۔ ان کے لئے ہرگز ممکن نہ ہوگا کہ مقابلہ کر سکیں۔ یہ وہی الہام ہے جو ظہور کر رہا ہے کہ انّی مھین من اراد
    اھانتک یہ وہی محمد حسین ہے جو اس عاجز کی نسبت جابجا کہتا پھرتا تھا کہ یہ شخص سخت جاہل ہے۔ عربی کیا ایک صیغہ تک اس کو نہیں آتا اور وہ اعلیٰ درجہ کے فاضل جو میرے ساتھ ہیں ان کو
    کہتا تھا کہ یہ لوگ صرف منشی ہیں۔ پس خدا تعالیٰ کی غیرت نے تقاضا کیا کہ اس کی پردہ دری کرے اور اس کے تکبر کو توڑے اور اس کو دکھلاوے کہ خود پسندی اور عجب کےؔ یہ ثمرات ہیں۔ سو
    اس سے زیادہ اور کیا اہانت ہو گی کہ جس شخص کو جاہل سمجھتا تھا اور منبر پر چڑھ کر اور مجلسوں میں بیٹھ کر بار بار کہتا تھا کہ زبان عرب سے یہ شخص بالکل ناآشنا ہے اور اجہل ہے اسی کے
    ہاتھ سے خدا تعالیٰ نے اس کو شرمندہ اور ذلیل کیا۔ اگر یہ نشان نہیں تو چاہیئے تھا کہ محمد حسین اپنے تمام دوستوں سے مدد لیتا اور نور الحق اور کرامات الصادقین کا جواب لکھتا۔ اس شخص کو بڑے
    بڑے انعاموں کے وعدے دیئے گئے۔ ہزار *** کا ذخیرہ آگے رکھا گیا مگر اس طرف توجہ نہ کی۔ سو یہ نتیجہ مخالفت حق کا ہے فاتقوا اللّٰہ یا اولی الابصار۔
    اور یاد رہے کہ یہ عذر شیخ صاحب
    موصوف کا کہ نور الحق میں پادری بھی مخاطب ہیں اس لئے رسالہ بالمقابل لکھنے سے پہلو تہی کیا گیا نہایت مکارانہ عذر ہے۔ گویا ایک بہانہ ڈھونڈھا ہے کہ کسی طرح جان بچ جائے لیکن دانا
    سمجھتے ہیں کہ یہ بہانہ نہایت کچا اور فضول اور ایک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 417
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 417
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/417/mode/1up
    شرمناک کارستانی ہے کیونکہ ہم نے تو لکھ دیا ہے کہ صرف پادری لوگ اور بے دین آدمی اس کے مقابلہ سے عاجز رہ سکتے
    ہیں سچے مسلمان عاجز نہیں ہیں۔ پس اگر شیخ صاحب بالمقابل رسالہ پیش کرتے تو پادریوں کی اور بھی ذلت ہوتی اور لوگ کہتے کہ مسلمانوں نے ہی یہ رسالہ بنایا تھا اور مسلمانوں نے ہی اس کے
    مقابل پر ایک اور رسالہ بنا دیا مگر پادریوں سے کچھ نہ ہو سکا۔ ماسوا اس کے تین ہزار روپیہ انعام پاتے الہام کا جھوٹا ہونا ثابت کر دیتے اور قوم میں عزت حاصل کر لیتے۔ اور بعض ان کے پرانے
    دوست جو کہہ رہے ہیں کہ بس معلوم ہوا جو محمدحسین اردو دان ہے عربی نہیں جانتا یہ تمام شک ان کے دور ہو جاتے۔ مگر اب جو وہ مقابلہ سے دستکش ہو گئے تو آئندہ حیا سے بہت بعید ہو گا کہ
    اس جماعت کا نام منشی رکھیں اور خود ان امور سے گریز کریں جو مولویت کے منصب کے لئے شرط ضروری ہیں۔ ان لوگوں کا عجیب اعتقاد ہے جو اب بھی ان لوگوں کو عربی دان ہی سمجھ رہے ہیں
    اور مولوی کر کے پکارتے ہیں نہایت خیر خواہی کی راہ سے پھر میں آخری دعوت کرتا ہوں اور پہلے رسالوں کے مقابلہ سے نومید ہوکر رسالہ سر الخلافہ کی طرف شیخ صاحب کو بلاتا ہوں۔ آپ کے
    لئے ستائیس دن کی میعاد اور ستائیس روپیہ نقد کا انعام مقرر کیا گیا ہے اور میں اس پر راضی ہوں کہ یہ روپیہ آپ ہی کے سپرد کروں اگر آپ طلب کریں اور ہم نہ بھیجیں تو ہم کاذب ہیں۔ ہم پہلے ہی یہ
    روپیہ بھیج سکتے ہیں مگر آپ اقرار شائع کر دیں کہ میں ستائیس دن میں رسالہ بالمقابل شائع کر دوں گا۔ اگر آپ اس مدت میں شائع کر دیں تو آپ نے نہ صرف ستائیس روپیہ انعام پایا بلکہ ہم عام طور پر
    شائعؔ کر دیں گے کہ ہم نے اتنی مدت جو آپ کو شیخ شیخ کر کے پکارا اور مولوی محمد حسین نہ کہا یہ ہماری سخت غلطی تھی بلکہ آپ توفی الواقع بڑے فاضل اور ادیب ہیں اور اس لائق ہیں کہ جو
    حدیث کے آپ معنے سمجھیں وہی قبول کئے جائیں۔
    اب دیکھو کہ کس قدر آپ کو اس میں فتح میسر آتی ہے اور پھر بعد اس کے کچھ بھی حاجت نہیں کہ آپ روپیہ اکٹھا کرنے کے لئے لوگوں کو
    تکلیف دیں یا اس نوکری سے استعفاء
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 418
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 418
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/418/mode/1up
    دینے کے لئے طیار ہو جائیں۔ کیونکہ جب آپ نے میرا مقابلہ کر دکھایا تو میرا الہام جھوٹا کر دیا تو اس صورت میں میرا تو
    کچھ باقی نہ رہا۔ پس آپ کو خدا تعالیٰ کی قسم ہے کہ اگر آپ کو علم عربی میں کچھ بھی دخل ہے ایک ذرہ بھی دخل ہے تو اب کی دفعہ تو ہرگز منہ نہ پھیریں اور اگر اس رسالہ میں کچھ غلطیاں ثابت
    ہوں تو آپ کے بالمقابل رسالہ کی غلطیوں سے جس قدر زیادہ ہوں گی فی غلطی ایک روپیہ آپ کو دیا جائے گا پچیس جولائی ۱۸۹۴ ؁ء تک اس درخواست کی میعاد ہے۔ اگر آپ نے ۲۵ جولائی ۱۸۹۴ ؁ء
    تک یہ درخواست چھاپ کر بذریعہ کسی اشتہار کے نہ بھیجی تو سمجھا جاوے گا کہ آپ اس سے بھی بھاگ گئے۔
    اور مسلمانوں کو لازم ہے کہ ان نادانوں کو جو نام کے مولوی ہیں اور اپنے وعظوں
    اور رسالوں کو معاش کا ذریعہ ٹھہرا رکھا ہے خوب پکڑیں اور ہریک جگہ جو ایسا مولوی کہیں وعظ کرنے کے لئے آوے اس سے نرمی کے ساتھ یہی سوال کریں کہ کیا آپ درحقیقت مولوی ہیں یا کسی
    نفسانی غرض کی وجہ سے اپنا نام مولوی رکھا لیا ہے۔ کیا آپ نے نور الحق کا کوئی جواب لکھا یا کرامات الصادقین کا کوئی جواب تحریر کیا ہے یا رسالہ سرّ الخلافہ کے مقابل پر کوئی رسالہ نکالا
    ہے۔ اور یقیناً یاد رکھیں کہ یہ لوگ مولوی نہیں ہیں۔ مسلمانوں کو لازم ہے کہ نور الحق وغیرہ رسائل اپنے پاس رکھیں اور پادریوں اور اس جنس کے مولویوں کو ہمیشہ ان سے ملزم کرتے رہیں اور ان
    کی پردہ دری کر کے اسلام کو ان کے فتنہ سے بچاویں اور خوب سوچ لیں کہ یہ وہی لوگ ہیں جنہوں نے دھوکا دہی کی راہ سے مولوی کہلا کر صدہا مسلمانوں کو کافر ٹھہرایا اور اسلام میں ایک سخت
    فتنہ برپا کردیا۔ والسلام علٰی من اتبع الھدٰی۔
    الراقم
    خاکسار غلام احمد عفی اللہ عنہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 419
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 419
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/419/mode/1up
    الشیخ عبد الحُسین
    الناکفوری
    سأل عنی بعض الناس فی أمر الشیخ عبد الحسین ناکفوری، وقالوا إنہ یدّعی أنہ نائب المہدی
    الموعود، وأنہ من اللّٰہ رب العالمین۔ فاعلموا أنّی ما توجہتُ إلی ہذا الأمر، وما أریٰ أن أتوجہ إلیہ، ویجرّد اللّٰہ کلَّ حقیقۃ من أستارہا، وکلّ شجرۃ تُعرَف من ثمارہا، فستعرفون کل شجرٍ من ثمرہ إلی حین۔
    والذی اتّبعَنا فی مشربنا فہو منّا، والذی لم یتّبع فہو لیس منّا، وسیحکم اللّٰہ بیننا وبینہم وہو أحکم الحاکمین۔ إن الذین یبسطون یدیہم إلی عرض الصحابۃ ویحسبون صَحْبَ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم من
    الکفرۃ الفجرۃ، أولئک لیسوا منا ولسنا منہم، فرّقوا دین اللّٰہ وکانوا کالمفسدین۔ أولٓئک الذین ما عرفوا رسول اللّٰہ حق المعرفۃ، وما قدروا حق قدرِ خیرِ البریّۃ، فقالوا إن صحبہ أکثرہم کانوا فاسقین کافرین۔ ما اتقوا
    الفواحش، وخانوا کل خیانۃٍ، ما ظہر منہا وما بطن، وکانوا منافقین۔ فصرف اللّٰہ قلوبہم عن الحق، یتکبّرون فی الأرض بغیر الحق، یقولون نحن نحبّ آل رسول اللّٰہ وما کانوا مُحبّین۔
    یریدون أن یُرضوا قومہم
    بالسب والشتم، واللّٰہ أحقُّ أن یُرضوہ إن کانوا مؤمنین۔ ألا إنہم علی الباطل، ألا إنہم من المفسدین۔ وغشِیہم من التعصب ما غشیہم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 420
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 420
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/420/mode/1up
    فانثنوا کالعَمین۔ فلن یکون منہم ولیُّ الرحمن أبدًا، ولہم عذاب ألیم فی الآخرۃ، وہم من المحرومین۔ إلا الذین تابوا وأصلحوا وطہّروا
    قلوبہم وزکّوا نفوسہم، وجاء وا ربّ العرش مخلصین، فلن یضیع اللّٰہ أجرہم ولن یُلحقہم بالمخذولین۔ وتجدون أنوار عشق اللّٰہ فی جباہہم، وآثار رحمۃ اللّٰہ فی وجوہہم، وتجدونہم من المحبین الصادقین۔ کُتب فی
    قلوبہم الإیمان، وحِیْلَ بینہم وبین شہواتہم، فلا یتبعون النفس إلا الحق، وخرّوا علی حضرۃ اللّٰہ متضرعین۔ وبنوا لمحبوبہم بنیانا فی قلوبہم، وبرزوا لہ متبتلین۔ یتبعون أحسنَ ما أُنزلَ إلیہم من ربّہم، ویتقون حق
    التقاۃ، فتراہم کالمیّتین۔ یجتنبون سبَّ الناس وغیبتہم، ویتّقون الفواحش مُستغفرین۔ ویتبعون الرسول حق الاتباع فتراہم فیہ کالفانین۔ وکذالک تعرف الفاسقین بسیماہم وشِرکہم ونَتَنِ کذبہم، وما للأُسود والثعالب یا
    معشر السائلین؟
    ثم اعلموا أن معرفۃ الأولیاء موقوفۃ علی عین الاتقاء ، فلا تجترؤا ولا تعجلوا علٰی أحد، فتنقلبوا مجرمین۔ وسارِعوا إلی حسن الظن ما اسطعتم، وأحسنوا واللّٰہ یحب المحسنین۔ ولا یجرِمَنّکم
    شقاق أحد أن تعادوا قومًا صالحین۔ إن اللّٰہ یمنّ علی من یشاء من عبادہ، ولا یُسأل عما یفعل، فلا تنکروا کالمجترئین۔ ولا تستخفّوا سبَّ أولیاء اللّٰہ، إنہم قوم یغضب اللّٰہ لہم، ویصول علی معادیہم، وإنہم من
    المنصورین۔ ولا تجاوروہم إلا بالتی ہی أحسن، ولا تجترؤا ولا تعتدوا إن کنتم متقین۔ ومن عادیٰ صادقا فقد مسّتْہ نفحۃ من العذاب، فیا حسرۃ علی المستعجلین و إن کان أحد منکم یُعادی الصادق فأَعِظُہ أن یعود
    لمثلہ أبدًا إن کان من المتورّعین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 421
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 421
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/421/mode/1up
    ومن جاء ہ الحق فلم یقبلہ وزاورَ ذاتَ الشمال فسیبکی أسفا، وما کان اللّٰہ مُہلِکَ قوم حتی یُتمّ حجتہ علیہم، فإذا أبوا فیأخذہم ملیکٌ
    مقتدر، فاتقوہ یا معشر الغافلین۔
    المکتُوب إلٰی عُلمَاء الہند
    فمنہم المولوي عبد الجبار الغزنوي، والمولوي عبد الرحمان اللکوکوي، والمولوي غلام دستکیر القصوري، والمولوي مشتاق أحمد اللودہیانوي،
    والمولوي محمد إسحاق البتیالوي، والقاضي سلیمان، والمولوي رشید أحمد الکنکوءي، والمولوي محمد بشیر البوفالوي، والمولوي عبد الحق الدہلوي، والمولوي نذیر حسین الدہلوي، والشیخ حسین عرب
    البوفالوي، والحافظ عبد المنان الوزیرآبادي، والمولوي
    شاہ دین اللودہانوي، والمولوي عبد المجید الدہلوي، والمولوي عبد العزیز اللودیانوي، والمولوي عبد اللّٰہ تلوندوي، والمولوي نذیر حسین الأنبیتوي
    السہارنفوري۔
    بسم اللّٰہ الرحمٰن الرحیم۔ الحمد للّٰہ الذی یُطلع القمر بعد دُجی المحاق، ویُغیث بعد المحل بالبُعاق، ویرسل الرؔ یاح بعد الاحتباس، ویہدي عبادہ بعد وساوس الخنّاس، ویُظہر نورہ عند إحاطۃ
    الظلمات، وینزل رُشدًا عند طوفان الجہلات؛ والصلاۃ والسلام علی سید الرسل وخیر الکائنات، وأصحابِہ الذین طہّروا الأرض من أنواع الہنات والبدعات، وآلِہ الذین
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 422
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 422
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/422/mode/1up
    ترکوا بأعمالہم أسوۃ حسنۃ للطیبین والطیبات، وعلٰی جمیع عباد اللّٰہ الصالحین۔
    أمّا بعد فیا عباد اللّٰہ، إنکم أنتم تعلمون أن ریح
    نفحات الإسلام کیف رکدت، ومصابیحہ کیف خبَتْ، والفتن کیف عمّت وکثُرت، وأنواع البدع کیف ظہرت وشاعت، وقد مضٰی رأس الماءۃ الذی کنتم ترقبونہ، ففکِّروا لِمَ ما ظہر مجدد کنتم تنتظرونہ؟ أظننتم أن
    اللّٰہ أخلفَ وعدہ أو کنتم قومًا غافلین۔ فاعلموا أن اللّٰہ قد أرسلنی لإصلاح ہذا الزمان، وأعطانی علم کتابہ القرآن، وجعلني مجددًا لأحکم بینکم فیما کنتم فیہ مختلفین۔ فلِمَ لا تطیعون حَکَمَکُم ولِمَ تصولون منکرین؟
    وما کنتُ من الکافرین ولا من المرتدین، ولکن ما فہمتم سرَّ اللّٰہ، وحار فہمکم، وفرط وہمکم، وکفّرتمونی، وما بلغتم معشار ما قلتُ لکم، وکنتم قومًا مستعجلین۔ وواللّٰہ إنی لا أدّعی النبوۃ ولا أجاوز الملۃ، ولا
    أغترف إلا من فضالۃ خاتم النبیین۔ وأؤمن باللّٰہ وملائکتہ وکتبہ ورسلہ، وأصلی وأستقبل القبلۃ، فلِم تکفّروننی؟ ألا تخافون اللّٰہ رب العالمین؟
    أیہا الناس لا تعجلوا علیّ، ویعلم ربّی أنی مسلم، فلا تُکفّروا
    المسلمین۔ وتدبَّروا صحف اللّٰہ، وفکِّروا فی کتاب مبین۔ وما خلقکم اللّٰہ لتکفّروا الناس بغیر علم، وتترکوا طرق رفق وحلم وحسن ظن، وتلعنوا المؤمنین۔ لِمَ تخالفون قول اللّٰہ وأنتم تعلمون؟ أخُلقتم لتکفیر المؤمنین
    أو شققتم صدورنا، ورأیتم نفاقنا وکُفرنا وزورنا؟ فأیہا الناس، توبوا توبوا وتندموا، ولا تغلُوا فی ظنکم ولا تُصرّوا، واتقوا اللّٰہ ولا تجترؤا ولا تیأسوا من روح اللّٰہ، وإنہ لا یُضیع أمۃ خیر المرسلین۔ خلَق الناس
    لیعبدوا، وأرسل الرسل لیعرفوا، ولیحکُم فیما اختلفوا، وبیّن الأحکام لیطیعوا ویُوجَروا، وبعث المجددین لیُذکّر
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 423
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 423
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/423/mode/1up
    الناس ما ذہلوا، ودقّق معارفہم لیُبتلوا، ولیعلَم اللّٰہ قومًا أطاعوا وقومًا أعرضوا، وشرع البیعۃ لأہل الطریقۃ لیتوارثوا فی البرکات
    ویتضاعفوا، وأوجب علیہم حسن الظن لیجتنبوا طرق الہلاک ویُعصَموا، وفتح أبوؔ اب التوبۃ لیُرحَموا ویُغفَروا، واللّٰہ أوسع فضلا ورحما وہو أرحم الراحمین۔ وما کان لی أن أفتري علی اللّٰہ، واللّٰہ یُہلک قوما
    ظالمین۔
    وإني سُمّیتُ عیسٰی ابن مریم بأحکام الإلہام، فما کان لی أن أستقیل من ہذا المقام بعدما أقامنی علیہ أمر اللّٰہ العلام، وما أراہ مخالفا لنصوص کتاب اللّٰہ ولا آثار خیر المرسلین۔ بل زلّتْ قدمکم، وما
    خشیتم ندمکم، وما رجعتم إلی القرآن، وما أمعنتم فی الآثار حق الإمعان، وترکتم طرق الرشد والسدد، وملتم إلی التعصب واللدد، وغشِیتکم ہوی النفس الأمّارۃ، فما فہمتم معاني العبارۃ، ووفقتم موقف المتعصبین۔
    یا حسرۃ علیکم إنکم تنتصبون لإزراء الناس، ولا ترون عیوب أنفسکم من خدع الخناس، وتمایلتم علی الدنیا وأعراضہا غافلین۔ وواللّٰہ إن جمع الدنیا والدین أمرٌ لم یحصل قط للطالبین، وإنہ أشد وأصعب من نکاح
    حُرّتَین ومعاشرۃ ضرّتَین، لو کنتم متدبّرین۔
    اعلموا أن لباس التقوٰی لا ینفع أحدًا من غیر حقیقۃ یعلمہا المولی، وما کلُّ سوداءَ تمرۃً ولا کلّ صہباءََ خمرۃً، وکم مِن مزوّر یعتلق برب العباد، اعتلاق الحرباء
    بالأعواد، لا یکون لہ حظ من ثمرتہا، ولا علم من حلاوتہا وکذلک جعل اللّٰہ قلوب المنافقین؛ یصلّون ولا یعلمون ما الصلاۃ، ویتصدقون وما یعلمون ما الصدقات، ویصومون وما یعلمون ما الصیام، ویحجّون وما
    یعلمون ما الإحرام، ویتشہدون وما یعلمون ما التوحید، ویسترجعون ولا یعرفون مَن المالک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 424
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 424
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/424/mode/1up
    الوحید، إنْ ہم إلّا کالأنعام بل من أسفل السافلین۔ وأما عباد اللّٰہ الصادقون، وعشّاقہ المخلصون، فہم یصلِون إلی لُبّ الحقائق، ودُہن
    الدقائق، ویغرس اللّٰہ فی قلوبہم شجرۃ عظمتہ ودوحۃ جلالہ وعزّتہ، فیعیشون بمحبتہ ویموتون لمحبتہ، وإذا جاء وقت الحشر فیقومون من القبور فی محبتہ۔ قوم فانون، وللّٰہ موجَعون، وإلی اللّٰہ متبتّلون،
    وبتحریکہ یتحرکون، وبإنطاقہ ینطقون، وبتبصیرہ یبصرون، وبإیماۂ یُعادون أو یُوالون۔ الإیمان إیمانہم، والعدم مکانہم، سُتِروا فی ملاحف غیرۃ اللّٰہ فلا یعرفہم أحد من المحجوبین۔ یُعرفون بالآیات وخرقِ العادات
    والتأییدات مِن ربّ یتولاہم، وأنعمَ علیہم بأنواع الإنعامات۔ یدرکہم عند کل مصیبۃ، وینصرہم فی کل معرکۃ بنصر مبین۔ إنہم تلامیذ الرحمان، واللّٰہُ کان لہم کالقوابل للصبیان، فیکون کل حرکتہم مِن ید القدرۃ،
    ومِن مُحرِّکٍ غاب من أعین البرؔ یّۃ، ویکون کل فعلہم خارقا للعادۃ، ویفوقون الناس فی جمیع أنواع السعادۃ؛ فصبرہم کرامۃ، وصدقہم کرامۃ، ووفاۂم کرامۃ، ورضاۂم کرامۃ، وحلمہم کرامۃ، وعلمہم کرامۃ،
    وحیاۂم کرامۃ، ودعاۂم کرامۃ، وکلماتہم کرامۃ، وعباداتہم کرامۃ، وثباتہم کرامۃ؛ وینزلون من اللّٰہ بمنزلۃ لا یعلمہا الخلق۔ وإنہم قوم لا یشقی جلیسہم، ولا یُرَدُّ أنیسہم، وتجد ریّا المحبوب فی مجالسہم،
    ونسیم البرکات فی محافلہم، إن کنتَ لست أخشَمَ ومن المحرومین۔ وینزل برکات علی جدرانہم وأبوابہم وأحبابہم، فتراہا إن کنتَ لستَ من قوم عمین۔
    أیہا النّاس قد تقطعت معاذیرکم، وتبینت دقاریرکم، وأقبلتم
    علیّ إقبالَ سفّاکٍ، ولکن حفظنی ربّی من ہلاک، فأصبحتُ مظفرًا ومن الغالبین۔ أیہا النّاس۔ قد اعتدیتم اعتداءً کبیرًا فاخشوا علیمًا خبیرًا، ولا تجعلوا أنفسکم بنَخِّہا وجَخِّہا کعِظام استخرجت مخَّہا، ولا تعثوا فی
    الأرض معتدین۔ وإنّی امرؤٌ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 425
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 425
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/425/mode/1up
    ما أبالی رفعۃ ہذہ الدنیا وخفضہا، ورفعہا وخفضہا، بل أحِنّ إلی الفقر والمتربۃ، حنینَ الشحیح إلی الذہب والفضۃ، وأتوق إلی التذلل
    توقانَ السقیم إلی الدواء ، وذی الخصاصۃ إلی أہل الثراء ، وأتوکل علی اللّٰہ أحسن الخالقین۔ وما أخاف حصائد ألسنۃ، وغوائل کلِمٍ مزخرفۃٍ، ویتولانی ربی ویعصمنی من کل شرّ ومن فتن المعاندین۔
    أیہا
    النّاس لا تتبعوا مَن عادیٰ، وقوموا فرادیٰ فرادیٰ، ثم فکروا إن کنتُ علی حق، وأنتم لعنتمونی وکذّبتمونی وکفّرتمونی وآذیتمونی، فکیف کانت عاقبۃ الظالمین؟ وما اقتبلتُ أمر الخلافۃ إلا بحُکم اللّٰہ ذی الرأفۃ، وإنی
    بیدَی ربی الدابل، کصبیٍّ فی أیدی القوابل، وقد کنت محزونا من فتن الزمان، وغلبۃ النصاری وأنواع الافتنان، فلما رأی اللّٰہ استطارۃَ فَرَقی واستشاطۃَ قلقی، ورأی أن قلبی ضجر، ونہر الدموع انفجر، وطارت
    النفس شعاعًا، وأُرعدت الفرائص ارتیاعا، فنظر إلیّ تحننًا وتلطفًا، وتخیَّرنی ترحما وتفضلا، وقال إِنِّی جَاعِلُکَ فی الأَرْضِ خَلِیفَۃً ، وقال أَرَدْتُ أَنْ أَسْتَخْلِفَ فَخَلَقْتُ آدَمَ ، فہذا کلہ من ربی، فلا تحاربوا اللّٰہ إن کنتم
    متقین۔ یفعل ما یرید، أأنتم تعجبون؟ وإنی قبلتُ أنی أذَلُّ الناس وأنی أجہَل الناس کما ہو فی قلوبکم، ولکن کیف أردّ فضل أرحم الراحمین؟ وما تکلمتُ قبلا فی ہذا الباب، بل عندی شہادۃ من الآثار والکتاب، فہل
    أنتم تقبلون؟ أما ترون کیف بیّن اللّٰہ وفاۃ المسیح، وصدّقہ خیرُ الرسل بالتصریح، ورَدِفَہما تفسیرُ ابن عباس کما تعلمون؟ أیہا الناس ثم أنتم تنکرون وتترکون قول اللّٰہ ورسولہ ولا تخافون، وتُکِبّون علی لفظ
    النزول وتعلمون معناہ من زُبر الأوّلین۔ وما قصّ اللّٰہ علیکم قصّۃً إلّا ولہ مثالٌ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 426
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 426
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/426/mode/1up
    ذُکر فی صحف السابقین۔ فکیف الضلال وقد خلت لکم الأمثال؟ أتذرون سبل الحق متعمدین؟ وقال اللّٰہ ورزقکم فی السماء ، وأخبرکم
    عن نزول الحدید واللباس والأنعام وکل ما ہو تحتاجون إلیہ، وتعلمون أن ہذہ الأشیاء لا تنزل من السماء بل یحدث فی الأرضین۔ فما کان إلا إشارۃ إلی نزول الأسباب المؤثرۃ من الحرارۃ والضوء والمطر
    والأہویۃ، فما لکم لا تتفکرون وتستعجلون؟ تعلمون ظاہر الأشیاء وتنسون حقائقہا وتمرون علی آیات اللّٰہ غافلین۔ وإن کنتم فی شک من قولی فانتظروا مآل أمری وإنی معکم من المنتظرین۔ وکم من علوم أخفاہا اللّٰہ
    ابتلاءً من عندہ، فاعلموا أن السر مکنون، وما فی یدیکم إلا ظنون، فلا تکفرونی لظنونکم یا معشر المنکرین۔ انتہُوا خیرًا لکم، وإنی طبتُ نفسا عن کل ما تفعلون من الإیذاء والتحقیر والتکذیب والتکفیر، وما أشکو إلا
    إلی اللّٰہ، بل لما بصرتُ بانقباضکم وتجلّی لی إعراضُکم، علمتُ أنہ ابتلاء من ربی، فلہ العُتبی حتی یرضی، وہو أرحم الراحمین۔ فذکرتُ ربًّا جلیلا، وصبرتُ صبرًا جمیلًا، ولکنکم ما اہتدیتم، وظلمتم واعتدیتم، قال
    اللّٰہ ، فنبَزْتم، وقال ، فسخرتم، وقال یا عیسٰی إنّی مُتَوَفِّیکَ، فأنکرتم، وقال ِّ، فظننتم وکفّرتمونی ولعنتم، وقال ، فتجسّستم، ثم صعّرتم وعبستم، وقال۔ ۱؂ وقال ؂ ، فاغتبتم وکفّرتم، وما أراکم إلی ہذا الحین منتہین۔ أنسیتم
    أَخْذَ اللّٰہ وضغطۃَ القبر، أو لکم براء ۃ فی الزبر، أو أُذِنَ لکم من اللّٰہ رب العالمین۔ فکروا ثم فکروا، أتفتی قلوبُکم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 427
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 427
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/427/mode/1up
    أن اللّٰہ الذی یعینکم عند کل تردُّد ہو أقوَی مثلَ ہذا الزمان عن مجدد؟ وقد کنتم تستفتحون من قبل، فلما جاء نصر اللّٰہ صرتم أول
    المعرضین۔ ولویتم عنی عِذارکم، وأبدیتم ازورارکم، وصرفتم عنی المودّۃ، وبدلتم بالبغض المحبۃ، وذاب حسن ظنکم واضمحلّ، ورحل حبکم وانسلّ، وصرتم أکبر المعادین۔ فلما رأیتُ أعراض التزویر وانتہاء
    الأمر إلی التکفیر، علمتُ أن مخاطبتی بہذہ الإخوان مجلبۃ للہوان، فوجہتُ وجہی إلی أعزّۃ العرب والمتفقہین۔ وإنی أری أنہم یقبلوننی ویأتوننی ویعظّموننی، فسرَّنی مرأی ہذہ الوجوہ المبارکۃ، ودعانی
    التفاؤل بتلک الأقدام المبشرۃ إلی أن عمدت لتنمیقؔ بعض الرسائل فی عربی مبین۔ فہمَمْتُ لنفع تلک الإخوان بأن أکتب لہم بعض أسرار العرفان، فألفتُ ’’التحفۃ‘‘ و’’الحمامۃ‘‘، و’’نور
    الحق‘‘ و’’الکرامۃ‘‘، ورسالۃ ’’إتمام الحجۃ‘‘ وہذہ ’’سِرّ الخلافۃ‘‘، وفیہا منافع للذین وردتُ منہم مورد الکافرین۔ وأرجو أن یغفر ربی لکل من یأتینی کالمقترفین المعترفین۔ ألا تنظرون وما
    بقي مِن حُلل الدین إلا أطمارًا مخرَّقۃ، وما مِن قصرہ إلا أطلالا محرَّقۃ، وکُنا مُضغۃ للماضغین۔ أتعجبون مِن أن اللّٰہ أدرکَکم بفضلہ ومنّتہ، وما أضاحَکم عن ظل رحمتہ؟ أکانت لہذا الزمان حاجۃ إلی دجال، وما
    کانوا محتاجین إلی نصرۃ رب فعال؟ ما لکم کیف تخوضون؟ أین ذہبت قوۃ غور العقل وفہم النقل، وأین رحلت فراستکم، وأی آفۃ نزلت علی بصیرتکم، أنکم لا تعرفون وجوہ الصادقین والکاذبین؟ وقد لبثتُ فیکم
    عُمُرًا من قبلہ أفلا تعقلون؟ وإن رجلا یبذل قواہ وکل ما رزقہ اللّٰہ وآتاہ، لإعانۃ مذہب یرضاہ، حتی یُحسب أنہ أہلہ وذراہ، وقد رأیتم مواساتی للإسلام، وبَذْلَ جہدی لملّۃ خیر الأنام، ثم لا تبصرون۔ وعرضتُ
    علیکم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 428
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 428
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/428/mode/1up
    کل آیۃ قُبُلًا، ثم لا تنظرون۔ وإنی جئتکم لاُنجیکم من مکرٍ مُرمِض وروعٍ مُومِض، ثم أنتم لا تفکرون۔ وعزوتم إلیّ ادعاء النبوۃ، وما
    خشیتم اللّٰہ عند ہذہ الفریۃ، وما کنتم خائفین۔ ولا تفہمون مقالی، وتحسبون أُجاجًا زلالی، ولا تعقلون۔ وکیف یفہم الأسرار الإلہیۃ مَن سدل ثوب الخیلاء ، وعدل عن الحق بجذبات الشحناء ، ورضی بالجہلات،
    ومال إلی الخزعبلات، وأعرض عن الصراط کالعمین؟
    وتقولون إعراضا عن مقالتی، وإظہارًا لضلالتی، إن الملائکۃ ینزلون إلی الأرض بأجسامہم ویُقْوُون أماکنَ مقامہم، ویترکون السماوات خالیۃ، وربما
    تمرّ علیہم برہۃ من الزمان لا یرجعون إلی مکان، ولا تقرَبونہ* لتمادی الوقت علٰی وجہ الأرض لإتمام مہمات نوع الإنسان، ویضیعون زمان السفر بالبطالۃ کما ہو رأی شیخ البطالۃ؛ وإنہ قال فی ہذا الباب
    مجملا، ولکن لزمہ ذلک الفساد بداہۃ، فإن الذی محتاج إلی الحرکۃ لإتمام الخطۃ، فلا شک أنہ محتاج إلی صرف الزمان لقطع المسافۃ وإتمام العمل المطلوب من ہذا السفر ذی الشأن، فالحاجۃ الاُولٰی توجب
    وجود حاجۃ ثانیۃ، فہذا تصرُّف فی عقیدۃ إیمانیۃ۔ ثم من المحتمل أن لا یفضُل وقت عن مقصود، ویبقی مقصود آخر کموء ود؛ فانظر ما یلزم من المحذورات وذخیرۃِ الخزعبلات، فکیف تخرجون من عقیدۃ إیمانیۃ
    إلی التصرفات والتصریحات، وأنتم تعلمون أن وجود الملائکۃ من الإیمانیات، فنزولہم یشابہ نزول اللّٰہ فی جمیع الصفات۔ أیقبل عقلٌ إیمانیٌّ أن تخلو السماوات عند نزول الملائکۃ ولا تبقی فیہا شیء بعد ہذہ
    الرحلۃ؟ کأنّ صفوفہا تقوضت، وأبوابہا قُفلت، وشؤونہا عُطّلت، وأمورہا قُلّبت، وکل سماء ألقت ما فیہا وتخلّتْ۔ إن کان
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 429
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 429
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/429/mode/1up
    ہذا ہو الحق فأَخرِجوا مِن نصٍّ إن کنتم صادقین۔ ولن تستطیعوا أن تخرجوا ولو متم، فتوبوا واتقوا اللّٰہ یا معشر المعتدین۔ اعلموا أن
    الدرایۃ والروایۃ توأَمانِ، فمَن لا یراہما بنظر واحد فیقع فی ہوۃ الخسران، ویُضیع بضاعۃ العرفان، ثم بعد ذلک یُضیع حقیقۃ الإیمان ویلحق بالخاسرین۔ ومن خصائص دیننا أنہ یجمع العقل مع النقل، والدرایۃ مع
    الروایۃ، ولا یترکنا کالنائمین۔فنسأل اللّٰہ تعالٰی أن یُعطیَنا حقائق الإیمان، ویُوطننا ثری العرفان، ویرزقَنا
    مَرْأَی الجِنان بأنوار الجَنان، ویُمْطِیَنا قَرَا الإذعان، لنقتریَ قِری
    مرضات رب* الرحمن، ونتخیم
    بالحضرۃ ونسلَی عن الأوطان
    ونُغلِّس غادیًا إلی مرضاۃ المولی، ونحفِد إلی ما ہو أنسب
    و أولی، ونخترق فی مسالک العرفان، وننصلت فی سِکَکِ
    حُبِّ الرحمٰن، ونأوی إلی حصون وثیقۃ، ومَغانٍ
    أنیقۃ
    من صول الشیاطین، باتباع النبیّ
    الأمّیّ خاتم النّبیّین ۔ اللّٰہم
    فصلّ وسلّمْ علیہ إلٰی یوم الدّین
    وآخر دعوانا أن الحمد للّٰہ
    رب العالمین۔
    بقلم احقر عباد اللّٰہ الاحد غلام محمد الامرتسری من المریدین
    لحضرۃ المسیح الموعود والمہدی المسعود ادام اللّٰہ برکاتھم وقد فرغت من ھٰذا فی ۱۴؍ جولائی ۱۸۹۴ ؁ء یوم السبت۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 430
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 430
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/430/mode/1up
    القصیدۃ للمؤلف
    نفسِی الْفِداءُُ لبدرٍ ہاشمی عربی
    وَدادُہ قُربٌ ناہیک عن قُرَبِ
    نجَّی الوری مِن کل زور ومعصیۃٍ
    ومِن فسوق
    ومن شرکٍ ومن تَبَبِ
    فنوّرتْ ملّۃٌ کانت کمعدومٍ
    ضعفا و رجمت ذراری الجان بالشھب
    وزحزحتْ دُخْنًا غشّی علی مِللٍ
    وساقطتْ لؤلوءً ا رطبا علٰی حطب
    ونضّرتْ شَجْرَ ذکر اللّٰہ فی زمنٍ
    محل
    یمیت قلوب الناس من لعب
    فلاحَ نورٌ علی أرض مکدّرۃٍ
    حقا ومزّقت الاشرار بالقضب
    وما بَقَی أثرٌ مِن ظلمٍ وبدعاتٍ
    بنور مھجۃ خیر العجم والعرب
    وکان الوریٰ بصفاء نیّاتٍ
    مع ربھم العلٰی فی
    کلّ منقلب
    لہ صحب کرام راق میسمھم
    و جلّت محاسنھم فی البدء والعقب
    لہم قلوب کلَیثٍ غیرِ مکترثٍ
    وفضلُہم مستبینٌ غیرُ محتجبِ
    وقد أَتَتْ منہ فی تفضیلہم تترَا
    من الاحادیث ما یغنی من
    الطلب
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 431
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 431
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/431/mode/1up
    وقد أناروا کمثل الشمس إیمانا
    فَإِنْ فخَرنا فما فی الفخر مِن کَذِبِ
    فتعسًا لقوم أنکروا شأن رُتبِہمِ
    و لا یرجعون إلی صحفٍ و لا
    کتبِ
    ولا خروجَ لہم من قبرِ جہلاتٍ
    و لا خلاصَ لہم مِن أمنَع الحجبِ
    والیوم تسخَر بالأحباب من قومٍ
    وتبکِیَنْ یومَ جدَّ البینُ بالکُربِ
    ومن یؤثِرَنْ ذنبًا ولم یخشَ ربّہ
    فلا المرءُ بل ثورٌ بلا ذَنَبِ
    انظُرْ معارفنا وانظُرْ دقائقنا
    فعافِ کرَمًا إن أخللتُ بالأدبِ
    و أعاننی ربّی لتجدید ملّتہِ
    وإن لم یُعِنْ فمَن ینجو مِن العطبِ
    و قلتُ مرتجلا ما قلتُ من نظمٍ
    و قلمی مستھل القطر کالسّحب
    وکفی لنا
    خالقٌ ذو المجد منَّانٌ
    فما لنا فی ریاض الخلق مِن أَرَبِ
    وقد جمع ہذا النظم مِن مُلحٍ ومن نُخبٍ
    بیمن سیدنا ونجومہ النُجب
    وإنی بأرض قد علَتْ نارُ فتنتہا
    والفتن تجری علیہا جَرْیَ مُنسرِبِ
    و من
    جفانی فلا یرتاع تَبعتَہُ
    بما جفا بل یراہ أفضلَ القُرُبِ
    فأصبحتْ مُقْلتی عینینِ ماؤُہما
    یجری من الحزن والالم والشجب
    أُرجِلتُ ظلمًا وأرضُ حِبِّی بعیدۃٌ
    فیالیتنی کنت فوق الرحل والقتب
    فقط
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 432
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- سِرّ الخلافۃ: صفحہ 432
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/432/mode/1up
     
    Last edited: ‏جنوری 22, 2018

اس صفحے کو مشتہر کریں