1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 8 ۔اتمام الحجۃ ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جولائی 27, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    روحانی خزائن جلد 8۔ اتمام الحجۃ۔ یونی کوڈ

    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 273
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 273
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ٹائیٹل پیج طبع اوّل
    الحمد للّٰہ الذی وفّقنا لتالیف رسالتنا ھٰذہ التی الّفت
    لافحام المولوی رسل باب الامرتسری و تبکیتہ و
    فصّل فیہ
    کل امر لتسکیتہ و سمیت
    إتمام الحجّۃ
    علی الذی لجّ و زاغ
    عن المحجّۃ
    و طبعت فی مطبع گلزار محمدی فی بلدۃ لاھور ۱۳۱۱ ؁ ھ
    تعداد جلد ۷۰۰
    قیمت فی جلد ۳؍
    ؔ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 274
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 274
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    الحمد للّٰہ الذی یقیم حجتہ فی کل زمان، ویجدّد ملّتہ فی کل أوان، ویبعث مصلحا عند کل فساد، وینتاب الخَلْقَ منہ ہادٍ بعد ہادٍ، ویمنّ
    علی عبادہ بإراءۃ طرق سَداد، ویسوّی الصراط للمتأہّبین۔ یہدی الخَلق بکتابہ إلی أسرارہ، ولا یُسمَح عقل بکشف أستارہ، یُلقی الروح علی من یشاء من عبادہ، ویفتح علی من یشاء أبواب إرشادہ، فلا یغشاہ درنٌ
    ولا ینتطحہ قرنٌ، ویُدخلہ فی الطیبین۔ یدعو من یشاء ، ویطرد من یشاء ، ویُخیّب من یشاء ، ویُعطی من یشاء من نعماء عظمی، ویجعل رسالاتہ حیث یشاء ، ویعلم مَن بہا أحقّ وأولی۔ الناس کلّہم ضالّون إلّا من
    ہداہ، وکلہم میّتون إلا من أحیاہ، وکلہم عُمیٌ إلّا من أراہ، وکلہم جیاع إلّا من غذّاہ، وکلہم عِطاش إلا من سقاہ، ومن لم یہدہ فلا یکون من المہتدین۔ والصلاۃ والسلام علی رسولہ ومقبولہ محمد خیر الرسل وخاتم
    النبیین، الذی جاء بالنور المنیر، ونجّی الخلق من الظلام المبیر، وخلّص السالکین من اعتیاص المسیر، وہیّأ لہم زادًا غیر الیسیر، وآتی صُحُفًا مُطہَّرۃ کشجرۃ طیّبۃ، اغتذی کل طالب بجَنی عُودہا، ورغبت کل
    فطرۃ سلیمۃ فی استشارۃ سعودہا، وما بقی إلا الذی کان شقیَّ الأزل ومن المحرومین۔ والسلام علٰی آلہ الطیبین الطاہرین، الذین أشرقت الأرض بنورہم، وظہر الحق بظہورہم، ولا شک أنہم کانوا بُدورَ الإمامۃ،
    وجبال طرق الاستقامۃ، ولا یُعادیہم إلّا من کان مورد اللعنۃ، وزائغا عن المحجّۃ، ورحِم اللّٰہ رجلا جمَع حُبّہم مع حبّ الصُحْبۃ أجمعین۔ وعلی أصحابہ وصفوۃ أحبابہ الذین کانوا لہ أتبَعَ مِن ظلّہ، وأطوَعَ
    من
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 275
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 275
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    فعلہ۔ ترکوا بروق الدنیا وزینتہا برؤیۃ لَعْلِہ؛ ونہضوا إلی ما أُمروا بإذعان القلب وسعادۃ السیرۃ، وجاہدوا فی اللّٰہ علی ضعف من
    المریرۃ، و ما کانوا قاعدین۔ تبتّلوا إلی اللّٰہ تبتیلا، وجمعوا خزائن الآخرۃ وما ملکوا من الدنیا فتیلا، وما مالوا إلی امتراء المِیرۃ، وبذلوا أنفسہم لإشاعۃ الملّۃ، وقَفَوا ظلالَ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم حتی
    صاروا من الفانین۔ شرَوا أنفسہم ابتغاء مرضاۃ الربّ اللطیف، و رضوا لمرضاتہ بمفارقۃ المألف والألیف، وأنحوا أبصارہم عن الدنیاؔ وما فیہا، وأخذتہم جذبۃٌ عظمی فجُذبوا إلی اللّٰہ ربّ العالمین۔
    أما
    بعد فاعلم أن أُخُوّۃ الإسلام یقتضی النصح وصدق الکلام، ومن أُعطیَ علمًا من علوم فأخفاہ کسرٍّ مکتوم فہو أحد من الخائنین۔ وإن العلوم لا تنتہی دقائقہا، ولا تُحصی حقائقہا، ولا مانع لظہورہا، ولا محاق
    لبدورہا، وکم من علم تُرِک للآخرین۔ وقد علّمنی ربّی من أسرار، وأخبرنی من أخبار، وجعلنی مجدّد ہذہ الماءۃ، وخصّنی فی علومہ بالبسطۃ والسعۃ، وجعلنی لرسلہ من الوارثین۔ وکان من مفائح* تعلیمہ،
    وعطایا تفہیمہ، أن المسیح عیسی بن مریم قد مات بموتہ الطبعیّ وتُوفّی کإخوانہ من المرسلین۔ وبشّرنی وقال إن المسیح الموعود الذی یرقبونہ والمہدی المسعود الذی ینتظرونہ ہو أنت، نفعل ما نشاء فلا تکوننّ
    من الممترین۔ وقال إنّا جعلناک المسیح ابن مریم، ففَضَّ خَتْمَ سِرِّہ وجعلنی علی دقائق الأمر من المطّلعین۔ وتواترت ہذہ الإلہامات، وتتابعت البشارات، حتی صرتُ من المطمئنین۔ ثم تخیّرتُ طریق الحزامۃ،
    ورجعتُ إلی کتاب اللّٰہ خفیرِ طرق السلامۃ، فوجدتُہ علیہ أوّلَ الشاہدین۔ و أیُّ بیان یکون وضح**من بیانہ یَاعِیسٰی إِنِّی مُتَوَفِّیکَ؟ فانظُرْ، ہداک اللّٰہ قبلَ تَوَفّیک وجعَلک من المستبصرین۔
    وأکّدہ اللّٰہ بقولہ فَلَمَّا
    تَوَفَّیْتَنی، ففَکِّرْ فیہ یا من آذیتنی، وحسبتنی من الکافرین۔ وہذا نصّ لا یردّہ قولُ مُبارٍ بآثار، ولا یجرحہ سہمُ مُمارٍ فی مضمار، ولا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 276
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 276
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ینکرہ إلّا من کان من الظالمین۔والذین غاض دَرُّ أفکارہم، وضعفت جوازل أنظارہم، لا ینظرون إلی کتاب اللّٰہ وبیّناتہ، ویتیہون کرجل
    تبِع جہلا تہ، ویتکلمون کمجانین۔ یقولون إن لفظ التوفّی ما وُضع لمعنی خاص بل عمّت معانیہ، وما أُحکمتْ مبانیہ، وکذلک یکیدون کالمفترین۔ وإذا قیل لہم إن ہذا اللفظ ما جاء فی القرآن کتاب اللّٰہ الرحمن إلّا
    للإما تۃ وقبضِ الأرواح المرجوعۃ، لا لقبضِ الأجسام العنصریۃ، فکیف تصرّون علی معنی ما ثبت من کتاب اللّٰہ وبیان خیر المرسلین صلی اللّٰہ علیہ وسلم؟ قالوا إنّا ألفَینا آباء نا علی عقیدتنا ولسنا بتارکیہا
    إلی أبد الآبدین۔
    ثم إذا قیل لہم إن خاتم النبیین وأصدق المفسرین فسّر ہکذا لفظ التوفّی فی تفسیر ہذہ الآیۃ؛ أعنی تَوَفَّیْتَنی، کما لا یخفی علی أہل الدرایۃ، وتبِعہ ابن عباس لیقطع عرق الوسواس، وقال متوفِّیک
    ممیتُک، فلِمَ تترکون المعنی الذی ثبت مِن نبیّ کان أوّل المعصومین، ومِن ابن عمّہ الذی کان من الراشدین المہدیین؟ قالوا کیف نقبل ولم یعتقد بہذا آباؤنا الأوّلون؟ وما قالوا إلّا ظلمًا وزورًا ومن الفِرْیۃ ولمؔ
    یحیطوا آراءَ سلفِ الأمّۃ إلّا الذین قربوا منہم من المخطئین، وما تبعوا إلا الذین ضلّوا من قبل من فَیْجٍ أعوَجَ ومن قوم محجوبین۔ فما زالوا آخذین بآثارہم حتی حصحص الحق، فرجع بعضہم متندّمین۔ وأمّا الذین طبَع
    اللّٰہ علی قلوبہم فما کانوا أن یقبلوا الحق وما نفعہم وعظ الواعظین۔ والعلماء الراسخون یبکون علیہم ویجدونہم علی شفا حفرۃ نائمین۔
    یا حسرۃ علیہم! لِمَ لا یفکّرون فی أنفسہم أن لفظ التوفّی لفظٌ قد اتضح
    معناہ من سلسلۃ شواہد القرآن، ثم من تفسیر نبیّ الإنس ونبیّ الجانّ، ثم مِن تفسیر صحابیّ جلیل الشان، ومَن فسّر القرآن برأیہ فہو لیس بمؤمن بل ہو أخ الشیطان، فأی حجۃ أوضحُ من ہذا إن کانوا مؤمنین؟ ولو
    جاز صرفُ ألفاظ تحکُّمًا من المعانی المرادۃ المتواترۃ، لارتفع الأمان عن اللغۃ والشرع بالکلیۃ، وفسدت العقائد کلہا، ونزلت آفات علی الملّۃ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 277
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 277
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    والدّین۔ وکل ما وقع فی کلام العرب من ألفاظ وجب علینا أن لا ننحت معانیہا من عند أنفسنا، ولا نقدِّم الأقلّ علی الأکثر إلا عند قرینۃ
    یوجب تقدیمہ عند أہل المعرفۃ، وکذلک کانت سُنن المجتہدین۔
    ولما تفرقت الأمّۃ علی ثلاث وسبعین فِرقۃ من الملّۃ، وکلٌّ زعم أنہ من أہل السنّۃ، فأیُّ مخرج من ہذہ الاختلافات، وأیّ طریق الخلاص من الآفات
    من غیر أن نعتصم بحبل اللّٰہ المتین؟ فعلیکم معاشر المؤمنین باتباع الفرقان، ومن تبِعہ فقد نجا من طرق الخسران۔ ففکِّروا الآن، إن القرآن یتوفَّی المسیح ویکمل فیہ البیان، وما خالفہ حدیث فی ہذا المعنی بل
    فسّرہ وزاد العرفان، وتقرأ فی البخاری والعینی وفضل الباری أن التوفّی ہو الإماتۃ، کما شہد ابنُ عبّاس بتوضیح البیان، وسیّدُنا الذی إمام الإنس ونبیّ الجانّ، فأیّ أمرٍ بقی بعدہ یا معشر الإخوان وطوائف
    المسلمین؟
    وقد أقرّ المسیح فی القرآن أن فساد أمّتہ ما کان إلا بعد موتہ، فإن کان عیسی لم یمت إلی الآن، فلزمک أن تقول إن النصاری ما أفسدوا مذہبہم إلی ہذا الزمان۔ والذین نحتوا معنی آخر للتوفّی فہو بعید
    عن التشفّی، وإن ہو إلا من أہواۂم، وفساد آراۂم، ما أنزل اللّٰہ بہ من سلطان، کما لا یخفی علی أہل الخبرۃ وقلبٍ یقظان۔ وإن لم ینتہوا حقدًا، وأصرّوا علی الکذب عمدًا، فلیُخرجوا لنا علی معناہم سندًا، ولیأتوا من
    اللّٰہ ورسولہ بشرح مستند إن کانوا صادقین۔ وقد عرفتم أن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ما تکلَّمَ بلفظ التوفّی إلا فی معنی الإماتۃ، وکان أعمقَ الناس علما وأوّلَ المبصرین۔ وما جاء فی القرآن إلّا لہذا المعنی،
    فلا تحرّفوا کلمات اللّٰہ بخیال أدنٰی، ولا تقولوا لما تصِف ألسنتُکم الکذبَ ذلک حق وہذا باطل، واتقوا اللّٰہ إن کنتم متقین۔
    لِمَ ؔ تتبعون غلطًا ورجمًا بالغیب، ولا تبغون تفسیر مَن ہو منزّہ من العیب
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 278
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 278
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    وکان سیّدَ المعصومین؟ فاجتنبوا مثل ہذہ التعصّبات، واذکروا الموت یا دُودَ الممات، أتُترکون فی الدنیا فرحین؟ فاذکروا یومًا یتوفّاکم
    اللّٰہ ثم تُرجعون إلیہ فُرادی فُرادی، ولا ینصرکم مَن خالف الحق وعادی، وتُسألون کالمجرمین۔
    وأمّا قول بعض الناس من الحمقی أن الإجماع قد انعقد علی رفع عیسی إلی السماوات العُلی بحیاتہ الجسمانی لا
    بحیاتہ الروحانی، فاعلم أن ہذا القول فاسد ومتاع کاسد، لا یشتریہ إلّا من کان من الجاہلین۔ فإنّ المراد من الإجماع إجماع الصحابۃ، وہو لیس بثابت فی ہذہ العقیدۃ، وقد قال ابن عباس متوفّیک ممیتُک، فالموت ثابت
    وإن لم یقبل عفریتُک۔ وقد سمعتَ یا من آذیتنی أن آیۃ فَلَمَّا تَوَفَّیْتَنی تدل بدلالۃ قطعیۃ و عبارۃ واضحۃ أن الإماتۃ التی ثبتت من تفسیر ابن عباس، قد وقعت وتمّت ولیس بواقع کما ظن بعض الناس۔ أفأنت تظن أن
    النصاری ما أشرکوا بربہم ولیسوا فی شُرُک کالأساری؟ وإن أقررت بأنہم قد ضلوا وأضلوا، فلزمک الإقرار بأنّ المسیح قد ماتَ وفاتَ، فإنّ ضلالتہم کانت موقوفۃ علی وفاۃ المسیح، فتفکَّر ولا تُجادل کالوقیح۔ وہذا
    أمر قد ثبت من القرآن، ومن حدیث إمام الإنس ونبیّ الجانّ، فلا تسمع روایۃ تخالفہا، وإن الحقیقۃ قد انکشفت فلا تلتفت إلی من خالفہا، ولا تلتفت بعدہاإلی روایۃ والراوی، ولا تُہلک نفسَک من الدعاوی، وفکِّر
    کالمتواضعین۔ ہذا ما ذکّرناک من النبی والصحابۃ لنزیل عنک غشاوۃ الاسترابۃ، وأما حقیقۃ إجماع الذین جاء وا بعدہم، فنُذکّرک شیئا من کَلِمِہم، وإن کنتَ من قبل من الغافلین۔
    فاعلم أن الإمام البخاری، الذی
    کان رئیس المحدِّثین من فضل الباری، کان أول المقِرّین بوفاۃ المسیح، کما أشار إلیہ فی الصحیح، فإنہ جمَع الآیتین لہذا المراد، لیتظاہرا ویحصل القوۃ للاجتہاد۔ وإن کنتَ تزعم أنہ ما جمع الآیتین المتباعدتین
    لہذہ النیّۃ، وما کان لہ غرض لإثبات ہذہ العقیدۃ، فبیِّنْ لِمَ جمع
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 279
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 279
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    الآیتین إن کنتَ من ذوی العینین؟ وإن لم تبیّن، ولن تبیّن، فاتّق اللّٰہ ولا تُصرّ علی طرق الفاسقین۔
    ثم بعد البخاری انظروا یا ذوی
    الأبصار، إلی کتابکم المسلّم ’’مجمَع البحار‘‘، فإنہ ذکر اختلافات فی أمر عیسی علیہ السلام، وقدّم الحیاۃ ثم قال: وقال مالک مات۔ فانظروا ’’المجمع‘‘ یا أہل الآراء ، وخذوا حظّا من الحیاء ، ہذا ہو
    القول الذی تکفرون بہ وتقطعون ما أمر اللّٰہ بہ أن یوصل وباعدتم عن مقام الا تّقاء ، ألیس منکم رجل رشید یا معشر المفتتنین؟ وجاء فی الطبرانی والمستدرک عن عائشۃ قالت قال رسول اللّٰہ صلعم إن عیسی بن
    مریم عاش عشرین وماءۃ سنۃ۔ ثمؔ بعد ہذہ الشہادات، انظروا إلی ابن القیّم المحدّث المشہود لہ بالتدقیقات، فإنہ قال فی ’’مدارج السالکین‘‘ إنّ موسٰی وعیسٰی لو کانا حیَّین ما وسعہم* إلا اقتداء خاتم
    النبیّین۔ ثم بعد ذلک انظروا فی الرسالۃ ’’الفوز الکبیر وفتح الخبیر‘‘ التی ہی تفسیر القرآن بأقوال خیر البریّۃ، وہی من ولی اللّٰہ الدہلوی حکیم الملّۃ، قال متوفّیک ممیتُک۔ ولم یقل غیرہا من الکلمۃ، ولم یذکر
    معنی سواہا اتّباعا لمعنی خرج من مشکاۃ النبوّۃ۔ ثم انظر فی’’الکشّاف‘‘، واتق اللّٰہ ولا تَخْتَرْ طرق الاعتساف کمجترئین۔
    ثم بعد ذلک تعلمون عقیدۃ الفِرق المعتزلۃ، فإنہم لا یعتقدون بحیات عیسٰی، بل
    أقرّوا بموتہ وأدخلوہ فی العقیدۃ۔ ولا شک أنہم من المذاہب الإسلامیۃ، فإن الأمّۃ قد افترقت بعد القرون الثلا ثۃ، ولا ینکر افتراق ہذہ الملّۃ، والمعتزلۃ أحد من الطوائف المتفرّقۃ۔ وقال الإمام عبد الوہاب الشعرانی
    المقبول عند الثقات، فی کتابہ المعروف باسم ’’الطبقات‘‘ وکان سیدی أفضل الدین رحمہ اللّٰہ یقول کثیر من کلام الصوفیۃ لا یتمشی ظاہرہ إلا علی قواعد المعتزلۃ والفلاسفۃ، فالعاقل لا یُبعادر إلی الإنکار
    بمجرّد عزاء ذلک الکلام إلیہم، بل ینظر ویتأمل فی أدلّتہم۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 280
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 280
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ثم قال ورأیت فی رسالۃ سیدی الشیخ محمد المغربی الشاذلی اعلم أن طریق القوم مبنی علی شہود الإثبات، وعلی ما یقرب من طریق
    المعتزلۃ فی بعض الحالات۔ ہذا ما نقلنا من لواقح الأنوار، فتدبّر کالأخیار، ولا تعرض کالأشرار، ولا تخترْ سبیل المعتدین۔
    وإن قلتَ إن الإجماع قد انعقد علی عدم العمل بالمذاہب المخالفۃ للأ ئمّۃ الأربعۃ،
    فقد بیّنّا لک حقیقۃ الإجماع، فلا تصُلْ کالسِّباع، وفکِّرْ کأولی التقوی والارتیاع، واذکر قول الإمام أحمد الذی خاف اللّٰہ وأطاع، قال من ادّعی الإجماع فہو من الکاذبین۔ ومع ذلک نجد کثیرا من الاختلافات الجزئیۃ
    فی الأئمّۃ الأربعۃ، ونجدہا خارجۃ من إجماع الأئمّۃ، فما تقول فی تلک المسائل وفی قائلہا؟ أأنت تقرّ بغوائلہا، أو أنت تجوّز العمل علیہا والتمسک بہا ولا تحسبہا من خیالات المتبدِّعین؟ وأنت تعلم أن الإجماع
    لیس معہا ومع أہلہا، وکل ما ہو خارج من الإجماع فہو عندک فاسد ومتاع کاسد، وتحسب قائلہا من الملحدین الدجّالین۔ وإن کنتَ تزعم أن الإجماع قد انعقد علی حیات عیسی المسیح بالسند الصحیح والبیان
    الصریح، فہذا افتراء منک ومن أمثالک، ألا لعنۃ اللّٰہ علی الکاذبین المفترین۔ أیّہا المستعجلون لِمَ تسعون مکذبین؟ ومن أعظم المہالک تکذیب قوم کُشِف علیہم ما لم یُکشف علی غیرہم من دقائق سبیل الحق والیقین۔
    وکم من أُناس ما أہلکہم إلّا ظنونہم، وما أرداہم إلا سبّ الصادقین۔ دخلوا حضرۃ أہل اللّٰہ مجترئین، وما کان لہمؔ أن یدخلوہا إلا خائفین۔
    وإن المنکرین رموا کل سہم وتبعوا کل وہم، فما وجدوا مقاما فی ہذا
    المیدان، وجاہدوا کل جہد فما بقی عندہم سوی الہذیان، فلما انثلت الکنائن، ونفدت الخزائن، ولم یبق مفرّ ولا مآب، ولا ثنیۃ ولا ناب، مالوا إلی السبّ والتکفیر، والمکر
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 281
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 281
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    والتزویر، لعلہم یغلبون بہذا التدبیر، حتی اجترأ بعض الناس من وساوس الوسواس الخنّاس علی أن یخدع بعض العوام بصریر
    الأقلام، فألّف کتابا لہذا المرام، وقیّض القدر لہتک سترہ أنہ أشاع الکتاب بشرط الإنعام، وزعم أنہ سکّتَنا وبکّتَنا وأدّی مراتب الإفحام، وصار من الغالبین۔ فنہضنا لنعجُم عُودَ دعواہ، وماءَ سُقیاہ، ونمزّق الکذّاب
    وبلواہ، ونُری جنودہ ما کانوا عنہ غافلین۔
    فإن إنعامہ أوحشَ الذین ہم کالأنعام، وإعلامہ أوہشَ بعضَ العَیْلام، وما علموا خبث قولہ وضعف صولہ، وحسبوا سرابہ کماء معین۔ وکنتُ آلیتُ أن لا أتوجّہ إلّا إلی
    أمر ذی بال، ولا أضیع الوقت لکل مناضل ونضال، ورأیتُ تألیفہ مملوّا من الجہلات، ومشحونا من الخزعبلات، ومجموعا من دیدن الغباوۃ، وموضوعا من قریحۃ الشقاوۃ، فمنعتنی عزّۃُ وقتی وجلالۃ ہمّتی أن
    ألطّخ یدیّ بدم ہذا الدود، وأبعد عن أمر المقصود، ولکنی رأیت أنہ یخدع کلَّ غمر جاہل بإراء ۃ إنعامہ وتُرّہات کلامہ، ولو صمتنا فلا شک أنہ یزید فی اجترامہ، ویخدع الناس بتزویر إفحامہ، وإنہ ولَج الفخّ فنری
    أن نأخذہ ثم نذبحہ للجائعین۔ وإنہ یطیر طیران الجراد، لیأکل زرع ربّ العباد، فرأینا لتائید عین الحقیقۃ ومجاریہا، أن نصطاد ہذہ الجراد مع ذراریہا، ونُنج الخلق من کید الخائنین۔ فوالذی حبانا بمحبّتہ، ودعانا
    إلی تائید أحبّتہ، إنّا لا نرغب فی عطاء ہذا الرجل وإنعامہ، بل نحسبہ فضولا کفضول کلامہ، وما نرید إلا أن نُریہ جزاء اجترامہ، لئلا یغترّ بعض الجہلۃ من المتعصّبین۔
    فاعلم یا من ألّف الکتاب ویطلب منّا
    الجواب، إنا جئناک راغبین فی استماع دلائلک، لننجیک من غوائلک، ونجیح أصل رزائلک، ونریک أنک من الخاطئین۔ وأنت تعلم أن حمل الإثبات لیس علینا بل علی الذی ادّعی الحیاۃ ویقول إن عیسی ما مات ولیس
    من المیتین۔ فإن حقیقۃ الادّعاء اختیار طرق
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 282
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 282
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    الاستثناء بغیر أدلّۃ دالّۃ علی ہذہ الآراء ، أعنی إدخال أشیاء کثیرۃ فی حکم واحد، ثم إخراج شیء منہ بغیر وجہ الإخراج وسبب
    شاہد، وہذا تعریف لا ینکرہ صبی ولا غبی، إلّا الذی کان من تعصّبہ کالمجنونین۔
    فإذا تقرّر ہذا فنقول إنّا اذا نظرنا إلی زمان بُعث فیہ المسیح، فشہد النظر الصحیح أنہ کل من کان فی زمانہ من أعداۂ وأحبّاۂ
    وجیرانہ وإخوانہ وخلانہ وخالاتہ وأمہاتہ وعمّاتہ وأخواتہ، وکل من کان فی تلک البلدان والدیار
    و ا ؔ لعمران، کلہم ماتوا وما نری أحدا منہم فی ہذا الزمان؛ فمَن ادّعی أنّ عیسی بقی منہم حیّا وما دخل فی
    الموتی فقد استثنی، فعلیہ أن یُثبت ہذا الدعوی۔ وأنت تعلم أن الأدلۃ عند الحنفیّین لإثبات ادعاء المدّعین اربعۃ انواع کما لا یخفی علی المتفقہین۔ الأوّل قطعیّ الثبوت والدلالۃ ولیس فیہا شیء من الضعف
    والکلالۃ، کالآیات القرآنیۃ الصریحۃ، والأحادیث المتواترۃ الصحیحۃ، بشرط کونہا مستغنیۃ من تأویلات المؤوّلین، ومنَزّہۃ عن تعارض وتناقض یوجب الضعف عند المحققین۔ الثانی قطعی الثبوت ظنّی الدلالۃ،
    کالآیات والأحادیث المأوَّلۃ مع تحقُّق الصحّۃ والأصالۃ۔ الثالث ظنّی الثبوت قطعیّ الدلالۃ، کالأخبار الآحاد الصریحۃ مع قلّۃ القوّۃ وشیء من الکلالۃ۔ الرابع ظنّیّ الثبوت والدلالۃ، کالأخبار الآحاد المحتملۃ
    المعانی والمشتبہۃ۔
    ولا یخفی أن الدلیل القاطع القوی ہو النوع الأول من الدلائل، ولا یمکن مِن دونہ اطمینان السائل۔ فإنّ الظنَّ لا یُغْنی مِنَ الْحَقِّ شَیْءًا، ولا سبیل لہ إلی یقین أصلا۔ ولم أزل أرقُب رجلا یدّعی
    الیقین فی ہذا المیدان، وأتشوّف إلی خبرہ فی أہل العدوان، فما قام أحد إلی ہذا الزمان، بل فرّوا منی کالجبان، فأودعتہم کالیائسین وانطلقت کالمتفرّدین، إلی أن جاء نی بعد تراخی الأمد، تلک رسالتک یا ضعیف
    البصر شدید الرمد، ونظرت إلیہ نظرۃ وأمعنت فیہ طرفۃ، فعرفت أنہ من سقط المتاع، ومما یستوجب أن یُخفَی ولا یُعرض کالبَعاع۔ ولو غشِیک نور
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 283
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 283
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    العرفان، وأمعنتَ کرجل لہ عینان، لسترتَ عوارک، وما دعوت إلیہ جارک، ولکن اللّٰہ أراد أن یُخزیک، ویُری الخلق خزیک، فبارزتَ
    وأقبلت، وفعلت ما فعلت، وزوّرت وسوّلت، وکتبت فی کتابک الإنعام، لتُرضی بہ الأنعام، ولکن رتَقتَ وما فتَقت، وخدعتَ فی کل ما نطقت، وإنّا نعلم أنک لست من المتموّلین۔
    ومع ذلک لا نعرف أنک صادق الوعد
    ومن المتقین، بل نری خیانتک فی قولک کالفاسقین۔ فما الثقۃ بأنک حین تُغلب وترتعد ستفی بما تعد؟ وقد صار الغدر کالتحجیل فی حلیۃ ہذا الجیل، فإن وردت غدیر الغدر، فمن أین نأخذ العَین یا ضیِّقَ الصدر؟ وما
    نرید أن تُرجع الأمر إلی القضاۃ ونحتاج إلی عون الولاۃ، ونکون عرضۃ للمخاطرات۔ ونعلم أنک أنت من بنی غبراء ، لا تملک بیضاء ولا صفراء ، فمن أین یخرج العَین مع خصاصتک وإقلالک وقِلّۃ مالک؟ ومع ذلک
    للعزائم بدواتٌ، وللعِدات معقّبات، وبیننا وبین النَجْز عقبات، ولا نأمن وعدکم یا حزب المبطلین۔ فإن کنتَ من الصادقین لا من الکاذبین الغدّارین، وصدقت فی عہد إنعامک وما نویتَ حنثًا فی إقسامک، فالأمر الأحسن
    الذی یسرد غواشی الخطرات، ویجیح أصل الشبہاؔ ت، ویہدی طریقا قاطع الخصومات، أن تجمع مال الإنعام عند رئیس من الشرفاء الکرام، ونحن راضون أن تجمع عند الشیخ غلام حسن أو الخواجہ یوسف
    شاہ أو المیر محمود شاہ قطعًا للخصام، ونأخذ منہم سندًا فی ہذا المرام، فہل لک أن تجمع عَینک عند رجلٍ سواءٍٍ بینی وبینک، أو لا تقصد سبیل المنصفین؟ وإنّا لا نعلم مکنون طویّتک، فإن کنت کتبتَ الرسالۃ من
    صحۃ نیّتک، لا من فساد طبیعتک، فقُمْ غیرَ وانٍ ولا لاوٍ إلی عدوان، واعمل کما أمرنا إن کنتَ من الصّادقین۔ وإنّا جئناک مستعدّین ولسنا من المعرضین ولا من الخائفین، بل نُسَرُّ بالإقدام ولو علی الضِرغام، ولا
    نخاف أمثالک من الناس، بل نحسبہم کالثعالب عند البأس۔ وأزمعْنا أن نفتّش خباء تک،
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 284
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 284
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ونستنفض حقیبتک، ونحسر اللثام عن قربتک، وقلّما خلص کذّاب أو بورک لہ اختلاب، وقد بقینا عامًا لا نخشِّن کلامًا، ولا نجیب مکفِّرًا
    ولوّامًا، وصبرنا ورأینا اجْلِخْماما، حتی ألجأتْنا مرارۃُ الکلمات إلی جزاء السیئات بالسیئات، وعلاجِ الحیّات بالعصیّ والصَّفاۃ، فقمنا لنہتک أستار الکاذبین۔
    فلا نلتفت إلی القول العریض، ونرید أن تبرز إلینا
    بالصُّفر والبِیض، وتجمع مبلغک عند أحدٍ من الرجال الموصوفین، وتأمرہم لیعطونی مبلغک عندما رأوک من المغلوبین۔ فإن لم تفعل فکذبک واضح، وعذرک فاضح، ألا لعنۃ اللّٰہ علی الکاذبین، ألا لعنۃ اللّٰہ علی
    الغادرین الناکثین، الذین یقولون ولا یفعلون، ویعاہدون ولا ینجزون، ولا یتکلمون إلا کالخادعین المزوّرین، فعلیہم لعنۃ اللّٰہ والملائکۃ والناس أجمعین۔ فاتّقِ لعنۃ اللّٰہ وأَنجِزْ ما وعدتَ کالصادقین۔ وإن کنت لا تقدر
    علی الإیفاء ، ولیس عندک مال کالأمراء، فاطلبْ لعونک قوما یأسُون جراحک ویریّشون جناحک، فإن کانوا من المصدّقین المعتقدین، فیعینونک کالمریدین، مع أن دِین القوم جبرُ الکسیر وفکُّ الأسیر، واحترام العلماء
    واستنصاح النصحاء ۔ علی أنک لن تطالب بدرہم إلا بعد شہادۃ حَکم، وأما الحَکم فلا بد من الحَکمَین بعد جمع العَین۔ ووکّلنا إلیک ہذا الخَطبَ، ولک کل ما تختار الیابس أو الرطبَ، فإن جعلتَ حَکَمَین کاذبَین، فنقبلہما
    بالرأس والعین، ولا ننظر إلی الکذب والمَین، بید أننا نستفسرہما بیمین اللّٰہ ذی الجلال، وعلیہما أن یحلفوا* إظہارًا لصدق المقال، ثم نمہلہما إلی عام، ونمدّ ید المسألۃ إلی خبیر علام، فإن لم تتبین إلی تلک
    المدّۃ أمارۃ الاستجابۃ، فنُشہد اللّٰہ انّا نُقرّ بصدقک من دون الاسترابۃ، ونحسبک من الصادقین۔
    وأؔ عجبنی لِمَ تصدّیتَ لتألیف الکتاب، وأیّ أمر کتبتَ کالنادر العجاب، بل جمعتَ فضلۃ أہل الفضول، واتبعتَ
    جہلات الجہول، وما قلت إلّا قولًا قیل
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 285
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 285
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    من قبلک، ونُسج بجہل أکبر من جہلک، وما نطقتَ بل سرقت بضاعۃ الجاہلین۔ وما نری فی کلامک إلا عبارتک التی نجد ریحہ کسَہْکِ
    الحیتان المتعفنۃ، ونتنِ الجیفۃ المنتنۃ، ونراہ مملوًّا من تکلّفات باردۃ رکیکۃ، وضحکۃ الضاحکین۔ وفعلتَ کل ذلک لرُغفان المساجد، وابتغاءِ مرضاۃ الخَلق کالواجد، لا للّٰہ ربّ العالمین۔ یامن ترَک الصدق ومانَ،
    قد نبذت الفرقان، ولا تعلم إلا الہذیان، وتمشی کالعمین، لا تعلم إلا الاختراق فی مسالک الزور، والانصلات فی سکک الشرور، ولا تتقی براثن الأسد وتسعی کالعُمی والعُور، وإنّا کشفنا ظلامک، ومزّقنا کلامک،
    وستعرف بعد حین۔ أ تؤمن بحیاۃ المسیح کالجہول الوقیح، وتحسبہ کأنہ استُثْنِیَ من الأموات، وما أقمت علیہ دلیلا من البیّنات والمحکمات، ولا من الأحادیث المتواترۃ من خیر الکائنات، فکذبتَ فی دعوی
    الإثبات، وباعدتَ عن أصول الفقہ یا أخا الترہات۔ أیہا الجہول العجول، المخطئ المعذول، قِفْ وفکِّرْ برزانۃ الحصاۃ، ما أوردتَ دلیلا علی دعوی الحیاۃ، وما اتبعتَ إلا الظنیات، بل الوہمیات۔ ونتیجۃ الأشکال لا
    یزید علی المقدّمات، فإذا کانت المقدّمتان ظنّیّتَین فالنتیجۃ ظنّیۃ، کما لا یخفی علی ذوی العینین۔ وإن کنتَ لا تفہم ہذہ الدقائق، ولا تدرک ہذہ الحقائق، فسَلِ الذین من أولی الأبصار الرامقۃ، والبصائر الرائقۃ،
    وانظر بعینِ غیرک إن کنت لا تنظر بعینک فی سیرک، واستنزلِ الریَّ من سحاب الأغیار، إن کنتَ محرومًا من دَرّ الأمطار۔ألا تعلم یا مسکین أن قولک یُعارض بیّنات القرآن، ویخالف مُحکمات الفرقان؟ وقد تبیّن
    معنی التوفّی من لسان سیّدِ الإنس ونبیِّ الجانّ، وصحابتہ ذوی الفہم والعرفان۔ وأیّ فضل لمعنی العوام، بعد ما حصحص المعنی من خیر الأنام، ومَن یأباہ إلا من کان من الفاسقین؟
    فتندّم علی ما فرّطتَ فی
    جنب اللّٰہ وبیّناتہ، واتبعتَ المتشابہاتِ وأعرضتَ عن محکما تہ، ووثَبْتَ کخلیع الرسن، وترکتَ الحق کعَبَدۃِ الوثن۔ وإنی نظرتُ رسالتک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 286
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 286
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    الفینۃ بعد الفینۃ، فما وجدتُہا إلا راقصۃ کالقینۃ، وواللّٰہ إنہا خالیۃ عن صدق المقال، ومملوّۃ من أباطیل الدجّال، فعلیک أن تنقُد المبلغ
    فی الحال، لنریک کذبک ونوصلک إلی دار النکال۔ وعلیک أن تجمع مالک عند أمین الذی کان ضمینا بیقین، وإلا فکیف نوقن أنّا نقطف جناک إذا أبطلنا دعواک، وأریناک شقاک؟ یاأسیر المَتْربۃ، لستَ من أہل الثروۃ، بل
    مِن عَجَزۃ الجہلۃ، فاترُکْ شِنْشِنۃ القِحَۃ، واجمعِ المال وجانِبْ طرق الفِریۃ والتَعِلّۃ، فواہًا لک إن کنت من الصادقین الطالبین، وآہًا منک إن کنت من المعرضین المحتالین۔ وقد أوصینا واستقصینا، ونقّحنا تنقیح من
    یدعو أخا الرشد ویکشفؔ طرق السَّدَد، وأکملنا التبلیغ للّٰہ الأحد، وننظر الآن أتجمع المال وتُرِی العہد والإیمان، أو تُرِی الغدر وتتبع الشیطان کالمفسدین۔
    وواللّٰہِ الذی یُنزل المطر من الغمام، ویُخرج الثمر
    من الأکمام، إنی ما نہضتُ لطمعٍ فی الإنعام، بل لإخزاء اللئام، لیتبیّن الحق ولیستبین سبیل المجرمین، وإن اللّٰہ مع المتّقین۔ وواللّٰہِ الذی أعطی الإنسان عقلًا وفکرًا، لقد جئتَ شیءًا نُکْرًا، وأبقیتَ لک فی المخزِیات
    ذکرا۔ وقد کتبنا من قبل اشتہارا، وواعدْنا للمجیبین إنعاما، وأقررنا إقرارا، فما قام أحدٌ للجواب، وسکتوا کالبہائم والدواب، وطارت نفوسہم شعاعا، وأرعدت فرائصہم ارتیاعا، وأکبّوا علی وجوہہم متندّمین۔
    أفأنت أعلم منہم أو أنت من المجانین؟ إنہم کانوا أشدَّ کیدًا منک فی الکلام، بل أنت لہم کالتِّلام، فکان آخر أمرہم خزی وخذلان وقہر رب العالمین۔ وإن اللّٰہ إذا أراد خزی قوم فیعادون أولیاء ہ، ویؤذون أحبّاء ہ،
    ویلعنون أصفیاء ہ، فیبارزہم اللّٰہ للحرب، ویصرف وجہہم بالضرب، ویجعلہم من المخذولین۔ ألا تفکرون فی أنفسہم أنّ اللّٰہ یُنزل نُصرتہ لنا بجمیع أصنافہا، ویأتی الأرض ینقصہا من أطرافہا، ویحفظنا بأیدی
    العنایۃ، ویسترنا بملاحف الحمایۃ، فلا یضرّنا کید المفسدین؟ یعلم من کان لہ ومن کان لغیرہ، وینظر کل ماش فی سیرہ، ولا یہدی قوما مسرفین، ویبیر الفاسقین
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 287
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 287
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/287/mode/1up
    و یمحو أسماء المفترین من أدیم الأرضین۔ ہو الغیور المنتقم، ویعلم عمل المفسد الفتّان، ویأخذ المفترین بأقرب الأزمان، فیُنزل رجزہ
    أسرعَ من تصافُح الأجفان۔ فتوبوا کالذین خافوا قہر الرحمن، وأنابوا قبل مجیء یوم الخسران، وغیَّروا ما فی أنفسہم ابتغاء لمرضات اللّٰہ، یا معشر أہل العدوان۔ اطلبوا الرحم وہو أرحم الراحمین۔ فتندّم یا مغرور
    علی جہلا تک، واعتذر من فرطاتک، وفکِّر فی خسرک وانحطاط عرضک وانکشاف سترک، وازدجِرْ کالخائفین۔
    واعلمْ أنہ من نہض لیستقری أثر حیاۃ عیسی، فما ہو إلا کجادع مارن أنفِہ بموسی، فإن الفساد کل
    الفساد ظہر مِن ظنِّ حیاۃ المسیح، واسودّت الأرض من ہذا الاعتقاد القبیح، ومع ذلک لا تقدرون علی إیراد دلیل علی الحیاۃ، وتأخذون بأقوال الناس ولا تقبلون قول اللّٰہ وسید الکائنات۔ وتعلمون أنہ من فسّر القرآن
    برأیہ وأصاب فقد أخطأ، ثم تتبعون أہواء کم ولا تتقون مَن ذرأ وبرأ، وتتکلمون کالمجترئین۔ وإذا قُرِءَ علیکم آیات الفرقان فلا تقبلونہا، وإنْ قُرِءَ نصف القرآن، وإنْ عُرِضَ غیرہ، فتقبلونہ مستبشرین۔
    لاؔ تلتفتون
    إلی کتاب اللّٰہ الرحمن، وتسعون إلی غیرہ فرحین۔ ولیت شعری کیف یجوز الاتکاء علی غیر القرآن بعد ما رأینا بیّنات الفرقان؟ أتوصلکم غیرُ القرآن إلی الیقین والإذعان؟ فأْتوا بدلیل إن کنتم صادقین۔ یا حسرۃ
    علی أعدائنا إنہم صرفوا النظر عن صحف اللّٰہ الرحمٰن، وما طلبوا معارفہا کطلّاب العرفان، وأفنوا زمانہم وعمرہم فی أقوال لا توصلہم إلی روضات الإذعان، ولا تسقیہم من ینابیع مطہّرۃ للإیمان، وما نری
    أقوالہم إلا کصوّاغین باللسان۔ فیامعشر العُمی والعُور۔ اتقوا اللّٰہ ولا تجترء وا علی المعاصی والفجور، وتخیّروا طریقا لا تخشون فیہ مسَّ حیفٍ ولا ضربَ سیف، ولا حُمَۃَ لاسعٍ ولا آفۃَ وادٍ واسع، وقوموا للّٰہ
    قانتین۔ وفکّروا فی قولی۔ ہل صدقتُ فیما نطقتُ، أو ملتُ فیما قلتُ، وتفکروا کالخاشعین۔ ما لکم لا تستعدّون
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 288
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 288
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/288/mode/1up
    لقبول الحجّۃ وتزیغون عن المحجّۃ، ترکضون فی امتراء المیرۃ، ولہا تترکون أقارب العشیرۃ۔ وما أری فیکم مَنْ تَرَکَ لِلّٰہ الأقارب
    والأحباب، وجدَّ فی الدّین ودأب۔ لم لا تتأدّبون بآداب الصلحاء ، ولا تقتدون بطرق الأتقیاء ؟ أنکرتم الحق وما رأیتم سُقیاہ، وما وطأتم حصاہ، وما استشرفتم أقصاہ، وترکتم الفرقان وہُداہ، وکنتم قوما عادین۔
    یا
    أہل الفساد والعناد۔۔ اتقوا اللّٰہ ربّ العباد۔ أین ذہب تقاکم؟ وأضلّکم علمُکم وما وقاکم۔ لا تفہمون القرآن ولا تمسّون الفرقان، فأین غارت مزایاکم، وأین ذہب ریّاکم؟ ما أجد کلامکم مؤسَّسًا علی التقوی، وأجد قلوبکم
    متدنسۃ بالطغوی۔ فما بال قارب کان لہا کمثلِکم الملاحُ، وما بال أرض یحرثہا کحزبکم الفلاحُ؟ ولا شک أنکم أعداء الدین وعِدا الشرع المتین۔ ونعلم أن قصر الإسلام منکم ومن أیدیکم عفا، ولم یبق منہ إلا شفا،
    ولولا رحمۃ ربّی لأحاطہ الدجی، وکان اللّٰہ حافظہ وہو خیر الحافظین۔
    ألا تنظرون أنکم کَمْ فَجٍّ سلکتم، وکم رجلٍ أہلکتم، وکم بِدَعٍ ابتدعتم، وکم قومٍ خدعتم، وکم عرضٍ اختلستم، وکم ثعلبٍ افترستم؟ أمّا الآن
    فالحق قد بان ورحم الربّ الرحیم، واستنار اللیل البہیم، وأنار الدین القویم وظہر أمر اللّٰہ وکنتم کارہین۔ إن للّٰہ فی کل یوم نظرۃً، فنظر الدینَ رحمۃً، ووجدہ غرضًا لسہام الأعداء ، وکالوحید الطرید فی البیداء،
    فأقامنی برحمۃ خاصۃ فی أیام إقلال وخصاصۃ، لیجعل المسلمین من المنعَمین، ویعطیہم ما لم یعط لآباۂم ویرحم الضعفاء ، وہو أرحم الراحمین۔
    وما قمتُ بہذا المقام إلّا بأمر قدیر، یبعث الإمام ویعلم الأیام،
    حکیم علیم یری أیام الغی والضلال، وصراصر الفساد فی النساء والرجال۔ تناہی الخَلق فی التخطی إلی الخطایا، وعقروا مطا المطایا، ودفنوا الحق فی الزوایاؔ ، ولمع الباطل کالمرایا، فرأی ہذا کلَّہ ربُّ
    البرایا، فبعث عبدًا من العباد، عند وقت الفساد، أعَجِبتم من فضلہ یا جَمْرَ العناد؟ فلا تتکؤا علی الظنون، وللّٰہ أسرار کالدرّ المکنون
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 289
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 289
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/289/mode/1up
    یبلی عبادہ فی کل زمان، وکل یوم ہو فی شان۔وأُقسِم بعلّامِ المخفیّات، ومُعینِ الصادقین والصادقات، أنی من اللّٰہ رب الکائنات۔ ترتعد
    الأرض من عظمتہ، وتنشق السماء من ہیبتہ، وما کان لکاذب ملعون أن یعیش عمرا مع فِریتہ، فاتقوا اللّٰہ وجلال حضرتہ۔ ألم یبق فیکم ذرّۃ من التقویٰ؟ أنسیتم وعظ کفّ اللسان وخوف العقبی؟ یا أیہا الظانّون
    ظن السوء ۔ تعالوا ولا تفرّوا من الضوء۔ یا قوم إنی من اللّٰہ۔ إنی من اللّٰہ۔ إنی من اللّٰہ، وأُشہد ربی أنی من اللّٰہ۔ أؤمن باللّٰہ وکتابہ الفرقان، وبکل ما ثبت من سیّد الإنس ونبیِّ الجانّ۔ وقد بُعثتُ علی رأس الماءۃ،
    لأجدّد الدین وأُنوّر وجہ الملّۃ، واللّٰہ علی ذلک شہید، ویعلم من ہو شقی وسعید۔ فاتقوا اللّٰہ یا معشر المستعجلین۔ ألیس فیکم رجل من الخاشعین؟ أتصولون علی الأسود ولا تمیّزون المقبول من المردود؟ وفی
    الأمّۃ قوم یلحقون بالأفراد، ویکلّمہم ربہم بالمحبّۃ والوداد، ویُعادی من عاداہم ویوالی من والاہم، ویُطعمہم ویسقیہم، ویکون فیہم وعلیہم ولہم، ویُحاطون من ربّ العالمین۔ لہم أسرار من ربہم لا یعلمہا غیرہم،
    ویشرَبُ قلبہم ہوی المحبوب ویُوصَلون إلی المطلوب۔ ینوّر باطنہم ویترک ظاہرہم فی الملومین، فطوبٰی لفتی یأتمّ بآدابہم، وتنکسر جبائر مکرِہ فی جنابہم، ویسرج جواد الصدق لصحبۃ الصادقین۔
    ہذا ما کتبنا
    وألّفنا لک الکتاب، فإذا وصلک فأمْلِ الجواب۔ وحاصل الکلام أنّا قائمون للخصام، لنذیقک جزاء السہام، ومن آذی الأحرار فأباد نفسہ وأبار۔ فاسمَعْ منی المقال، إنی أرقُب أن تجمع المال، فإذا جمعتَ وأتممت
    السؤال، فاعلم أن أحمد قد صال وأراک الوبال والنکال۔ یا مسکین إن موت عیسی من البدیہیات، وإنکارہ أکبر الجہلات، ولکن صدِئ قلبُک وغلُظ الحجاب، فردّدتْ وتقاذفتْ بک الأبواب، فلا تصغَی إلی العظات،
    ویؤذیک الحق کالکَلِمِ المحفِظات، وأرداک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 290
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 290
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/290/mode/1up
    تباہیک بکتابک وہو أصل تبابک۔ وإنی عرفت سرّک ومعمّاہ، وإن لم یَدْرِ القوم معناہ۔ وما ترید إلا أن تفتتن قلوب السفہاء ، وتخدع
    الجہلاء، لتکون لک عزّۃٌ فی الأشقیاء ، وتفوز فی الأہواء ، وہذا خاتمۃ الکلام، فتدبّرْ کالعقلاء ولا تقعد کالعمین۔
    ہداک اللّٰہ ہل تُرضی العواما
    لکی تستجلِبنْ منہم حُطاما
    وہل فی ملّۃ الإسلام أثرٌ
    من
    الکَلِمِ التی تَبرِی خِصاما
    أعندؔ ک حُجّۃٌ إجماعُ قومٍ
    أضاعوا الحق جہلا واہتضاما
    ومثلک أُمّۃٌ قتلتْ حسینا
    إذا وجدتْ کمنفرد إماما
    تمّت
    مولوی رسل بابا صاحب امرتسری کے رسالہ حیات
    المسیح پر ایک اور نظر
    اور نیز ہزار روپیہ انعامی جمع کرانے کے لئے درخواست
    ہم ابھی بیان کر چکے ہیں کہ ان دنوں میں مولوی صاحب مندرج العنوان نے ایک کتاب حضرت عیسیٰ علیہ السلام
    کی زندگی ثابت کرنے کے لئے لکھی ہے جس کا نام حیات المسیح رکھا ہے۔ لیکن اگر یہ پوچھا جائے کہ انہوں نے باوجود اس قدر محنت اٹھانے اور وقت ضائع کرنے کے ثابت کیا کیا ہے تو ایک منصف
    آدمی یہی جواب دے گا کہ کچھ نہیں۔ اگر مولوی صاحب موصوف کی نیت بخیر ہوتی اور ان کے اس کاروبار کی علت غائی حق الامر کی تحقیق ہوتی نہ اور کچھ تو وہ اس رسالہ کے لکھنے سے پہلے
    قرآن شریف کی ان آیات بینات کو غور سے پڑھ لیتے جن سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی وفات ایسی صاف طور پر ثابت ہو رہی ہے کہ گویا وہ ہماری آنکھوں کے سامنے فوت ہو گئے اور دفن کئے
    گئے۔ لیکن افسوس کہ مولوی صاحب موصوف محکم اور بین آیات سے آنکھ بند کر کے گزر گئے اور بعض دوسری آیات میں تحریف کر کے اور اپنی طرف سے اور فقرے ان کے ساتھ ملا کر عوام کو یہ
    دکھلانا چاہا کہ گویا ان آیتوں سے حضرت عیسیٰ کی حیات کا پتہ لگتا ہے۔ لیکن اگر مولوی صاحب کی اس مفتر یا نہ کاروائی سے کچھ ثابت ہوتا بھی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 291
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 291
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/291/mode/1up
    ہے تو بس یہی کہ ان کی فطرت میں یہودیوں کی صفات کا خمیر بھی موجود ہے ورنہ یہ کسی نیک بخت آدمی کا کام نہیں ہے کہ
    قرآن کریم کی ظاہر ترکیب کو توڑ مروڑ کر اور آیات کے غیر منفک تعلقات کو ایک دوسری سے الگ کر کے اور بعض فقرے اپنی طرف سے زائد کر کے کوئی امر ثابت کرنا چاہے اگر اسی بات کا نام
    ثبوت ہے تو کونسا امر ہے جو ثابت نہیں ہو سکتا۔ بلکہ ہریک ملحد اور بے ایمان اپنے مقاصد اسی طرح ثابت کر سکتا ہے۔ اس بات کو کون نہیں جانتا کہ ایک کتاب کے معنے اسی صورت میں اس کتاب
    کے معنے کہلاتے ہیں کہ جب اس کی ترتیب اور تعلقات فقرات اور سیاق سباق محفوظ رکھ کر کئے جائیں۔ لیکن اگر اس کتاب کی ترکیب کو ہی زیر و زبر کیا جائے اور عبارت کے اعضا کو ایک
    دوسرے سے الگ کر دیا جائے اور نہایت دلیری کر کے بعض فقرات اپنی طرف سے ملا دیئے جائیں تو پھر ایسی خود ساختہ عبارت سے اگر کوئی مدعا ثابت کرنا چاہیںؔ تو کیا یہ وہی یہودیانہ
    تحریف نہیں ہے جس کی وجہ سے قرآن کریم میں ایسے لوگ سؤر اور بندر کہلائے جنہوں نے اسی طرح توریت میں ملحدانہ کاروائیاں کی تھیں۔ اگر ایسے ہی خائنانہ تصرفات اور تحریفات سے
    حضرت مسیح کی زندگی ثابت ہو سکتی ہے تو پھر ہمیں تو اقرار کرنا چاہیئے کہ حضرت مسیح کی زندگی ثابت ہو گئی۔ مگر اس بات کا کیا علاج کہ خدا تعالیٰ نے ایسے محرفوں کا نام خنزیر اور بوز نہ
    رکھا ہے اور ان پر *** بھیجی ہے اور ان کی صحبت سے پرہیز اور اجتناب کرنے کا حکم ہے۔ یہ بات یاد رکھنی چاہیئے کہ ہم الٰہی کلام کی کسی آیت میں تغییر اور تبدیل اور تقدیم اور تاخیر اور
    فقرات تراشی کے مجاز نہیں ہیں مگر صرف اس صورت میں کہ جب خود نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا کیا ہو اور یہ ثابت ہو جائے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ بذات خود ایسی تغییر
    اور تبدیل کی ہے اور جب تک ایسا ثابت نہ ہو تو ہم قرآن کی ترصیع اور ترتیب کو زیر و زبر نہیں کر سکتے اور نہ اس میں اپنی طرف سے بعض فقرات ملا سکتے ہیں۔ اور اگر ایسا کریں تو عند اللہ مجرم
    اور قابل مواخذہ ہیں۔ اب ناظرین خود مولوی صاحب موصوف کی کتاب کو دیکھ لیں کہ کیا وہ ایسی ہی کارروائیوں سے پُر ہے یا کہیں انہوں نے ایسا بھی کیا ہے کہ قرآن کریم کی کوئی آیت ایسے طور
    سے پیش کی ہے کہ اپنی طرف سے نہیں بلکہ ثابت کر کے دکھلا دیا ہے کہ خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث سے اس
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 292
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 292
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/292/mode/1up
    آیت کے معنے حضرت مسیح کی حیات ہی ثابت ہوتی ہے اور تکلفات اور تحریفات سے کام نہیں لیا۔ ہمیں نہ مولوی رسل بابا
    صاحب سے کچھ ضد اور عناد ہے نہ کسی اور مولوی صاحب سے۔ اگر وہ یہودیانہ روش پر نہ چلیں اور صحیح استدلال سے کام لیں تو پھر ثابت شدہ امر کو قبول نہ کرنا بے ایمانی ہے۔ اگر کوئی
    تعصبات سے الگ ہوکر اس بات میں فکر کرے کہ حقیقتیں کیونکر ثابت ہوتی ہیں اور ان کے ثبوت کے لئے قاعدہ کیا ہے تو وہ سمجھ سکتا ہے کہ خدائے تعالیٰ نے ایسا قاعدہ صرف ایک ہی رکھا ہے اور
    وہ یہ ہے کہ صاف اور صریح اور بدیہی امور کو نظری امور کے ثابت کرنے کے لئے بطور دلائل کے استعمال کیا جائے اور اگر ایسے امر کو بطور دلیل کے پیش کریں کہ وہ خود نظری اور مشتبہ
    امر ہے جو تکلفات اور تاویلات اور تحریفات سے گھڑا گیا ہے تو اس کو دلیل نہ کہیں گے بلکہ وہ ایک الگ دعویٰ ہے جو خود دلیل کا محتاج ہے۔ افسوس کہ ہمارے سادہ لوح مولوی دلیل اور دعویٰ میں
    بھی فرق نہیں کر سکتے۔ اور اگر کسی دعویٰ پر دلیل طلب کی جائے تو ایک اور دعویٰ پیش کر دیتے ہیں اور نہیں سمجھتے کہ وہ خود محتاج ثبوت ایسا ہی ہے جیسا کہ پہلا دعویٰ۔ ہم نے اپنے مخالف
    الرائے مولوی صاحبوں سے حضرت مسیح علیہ السلام کی حیات ممات کے بارے میں صرف ایک ہی سوال کیا تھا۔ اگر ایمانداری سے اس سوال میں غور کرتے تو ان کی ہدایت کے لئے ایک ہی سوال
    کافی تھا مگر کسی کو ہدایت پانے کی خواہش ہوتی تو غور بھی کرتا۔ سوال یہ تھا کہ اللہ جلّ شانہنے قرآن کریم میں حضرت مسیح علیہ السلام کی نسبت دو جگہ توفی کا لفظ استعمال کیا ہے اور یہ لفظ
    ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے حق میں بھی قرآن کریم میں آیا ہے اور ایسا ہی حضرت یوسف علیہ السلام کی دعا میں بھی یہی لفظ اللہ جلّ شانہ نے ذکر فرمایا ہے اور کتنے اور مقامات میں بھی
    موجود ہےؔ ۔ اور ان تمام مقامات پر نظر ڈالنے سے ایک منصف مزاج آدمی پورے اطمینان سے سمجھ سکتا ہے کہ توفّی کے معنے ہر جگہ قبض روح اور مارنے کے ہیں نہ اور کچھ۔ کتب حدیث میں
    بھی یہی محاورہ بھرا ہوا ہے۔ کتب حدیث میں توفی کے لفظ کو صدہا جگہ پاؤ گے مگر کیا کوئی ثابت کر سکتا ہے کہ بجز مارنے کے کسی اور معنے پر بھی استعمال ہوا ہے ہرگز نہیں۔ بلکہ اگر ایک اُ
    مّی آدمی عرب کو کہا جائے کہ تُوُفِّیَ زَیْدٌ تو وہ اس فقرہ سے یہی سمجھے گا کہ زید وفات پا گیا۔ خیر عربوں کا عام محاورہ بھی جانے دو خود آنحضرت
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 293
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 293
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/293/mode/1up
    صلی اللہ علیہ وسلم کے ملفوظات مبارکہ سے بھی یہی ثابت ہوتا ہے کہ جب کوئی صحابی یا آپ کے عزیزوں میں سے فوت
    ہوتا تو آپؐ توفّی کے لفظ سے ہی اس کی وفات ظاہر کرتے تھے اور جب آنجناب صلی اللہ علیہ وسلم نے وفات پائی تو صحابہ نے بھی توفی کے لفظ سے ہی آپ کی وفات ظاہر کی۔ اسی طرح حضرت
    ابوبکر کی وفات حضرت عمر کی وفات۔ غرض تمام صحابہ کی وفات توفّی کے لفظ سے ہی تقریراً تحریراً بیان ہوئی اور مسلمانوں کی وفات کے لئے یہ لفظ ایک عزت کا قرار پایا تو پھر جب مسیح پر
    یہی وارد ہوا تو کیوں اس کے خود تراشیدہ معنے لئے جاتے ہیں۔ اگر یہ عام محاورہ کا فیصلہ منظور نہیں تو دوسرا طریق فیصلہ یہ ہے کہ یہ دیکھا جائے کہ جو مسیح کے متعلق قرآنی آیات میں توفّی
    کا لفظ موجود ہے اس کے معنے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کے صحابہ نے کیا کئے ہیں۔ چنانچہ ہم نے یہ تحقیقات بھی کی تو بعد دریافت ثابت ہوا کہ صحیح بخاری میں یعنی کتاب التفسیر
    میں آیت فلمّا توفیتنی کے معنے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے مارنا ہی لکھاہے *اور پھر اسی موقعہ پر آیت انی متوفیک کے معنے حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے ممیتک درج ہیں
    یعنی اے عیسیٰ میں تجھے مارنے والا ہوں۔ اب ان حضرات مولویوں سے کوئی پوچھے کہ پہلا فیصلہ تو تم نے منظور نہ کیا مگر صحابہ کا فیصلہ اور خاص کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا
    فیصلہ قبول نہ کرنا اور پھر بھی کہتے رہنا کہ توفی کے اور معنے ہیں ایمانداری ہے یا بے ایمانی۔ ایسے تعصب پر بھی ہزار حیف کہ ایک لفظ کے معنے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے منہ سے
    بھی سن کر قبول نہ کریں بلکہ کوئی اور معنے تراشیں اور اس فیصلہ کو منظور نہ رکھیں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ کر دیا ہے اور اپنی نزاع کو اللہ اور رسول کی طرف رد نہ کریں بلکہ
    ارسطو اور افلاطون کی منطق سے مدد لیں۔ یہ طریق صلحاء کا نہیں ہے البتہ اشقیاء ہمیشہ ایسا ہی کرتے ہیں۔ ہمارے لئے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی شہادت سے اور کوئی بڑھ کر شہادت نہیں
    ہمارا تو اس بات کو سن کر بدن کانپ جاتا ہے کہ جب ایک شخص کے سامنے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فیصلہ پیش کیا جائے تو وہ اس کو قبول نہیں کرتا اور دوسری طرف بہکتا پھرتا ہے۔ پھر
    نہ معلوم ان حضرات
    * حاشیہ: ۔ طبرانی اور مستدرک میں حضرت عائشہ سے یہ حدیث ہے کہ رسول اللہ صلعم نے اپنی وفات کی
    بیماری میں فرمایا کہ عیسیٰ بن مریم ایک سو بیس برس تک
    جیتا رہا۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 294
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 294
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/294/mode/1up
    کے کس قسم کے ایمان ہیں کہ نہ قرآن کریم کا فیصلہ ان کی نظر میں کچھ چیز ہے نہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فیصلہ
    نہ صحابہ کی تفسیر۔ یہ کیسا زمانہ آ گیا کہ مولوی کہلا کر اللہ رسول کو چھوڑتے جاتے ہیں۔ اور اگر بہت تنگ کیا جائے اور کہا جائے کہ جس حالت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے توفی کے
    معنے مارنا کر دیئے ہیں تو پھر کیوں آپ لوگ قبول نہیں کرتے تو آخری جواب ان حضرات کا یہ ہے کہ حضرت مسیح کی زندگی پر اجماع ہو چکا ہے پھر ہم کیونکر قبول کر لیں مگر یہ عذر بھی بدتر از
    گناہ اور نہایت مکروہ چالاکی اور بے ادبی ہے۔ کیونکہ جس اجماع میں ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم داخل نہیں ہیں بلکہ اس کے صریحؔ مخالف ہیں وہ اجماع کے ساتھ اور کیا حقیقت رکھتا ہے۔
    ماسوا اس کے اجماع کا دعویٰ بھی سراسر جھوٹ اور افترا ہے۔ دیکھو کتاب مجمع بحار الانوار جلد اول صفحہ ۲۸۶ جو اس میں حَکَمًا کے لفظ کی شرح میں لکھا ہے ینزل(ای ینزل عیسٰی) حکَمًا ای
    حاکما بھذہ الشریعۃ لا نبیًا والاکثر انّ عیسٰی لم یمت وقال مالک مات وھو ابن ثلٰث وثلٰثین سنۃ یعنی عیسیٰ ایسی حالت میں نازل ہوگا جو اس شریعت کے مطابق حکم کرے گا نہ نبی ہو کر۔ اور اکثر کا یہ قول
    ہے کہ عیسیٰ نہیں مرا۔ اور امام مالک نے کہا ہے کہ عیسیٰ مر گیا اور وہ تینتیس۳۳ برس کا تھا جب فوت ہوا۔ اب دیکھو کہ امام مالکؓ کس شان اور مرتبہ کا امام اور خیر القرون کے زمانہ کا اور
    کروڑہا آدمی ان کے پیرو ہیں۔ جب انہیں کا یہ مذہب ہوا تو گویا یہ کہنا چاہیئے کہ کروڑہا عالم فاضل اور متقی اور اہل ولایت جو سچے پیرو حضرت امام صاحب کے تھے ان کا یہی مذہب تھا کہ
    حضرت عیسیٰ فوت ہو گئے ہیں کیونکہ ممکن نہیں کہ سچا پیرو اپنے امام کی مخالفت کرے خاص کر ایسے امر میں جو نہ صرف امام کا قول بلکہ خدا کا قول رسول کا قول صحابہ کا قول تابعین کا تبع
    تابعین کا قول ہے۔ اب ذرہ شرم کرنا چاہیئے کہ جب ایسا عظیم الشان امام جو تمام ائمہ حدیث سے پہلے ظہور پذیر ہوا اور تمام احادیث نبویہ پر گویا ایک دائرہ کی طرح محیط تھا جب اسی کا یہ مذہب ہو
    تو کس قدر حیا کے برخلاف ہے کہ ایسے مسئلہ میں اجماع کا نام لیں افسوس کہ حضرات مولوی صاحبان عوام کو دھوکہ تو دیتے ہیں مگر بولنے کے وقت یہ خیال نہیں کرتے کہ دنیا تمام اندھی نہیں
    کتابوں کو دیکھنے والے اور خیانتوں کو ثابت کرنے والے بھی تو اسی قوم میں موجود ہیں۔ یہ نام کے مولوی جب دیکھتے ہیں کہ نصوص قرآنیہ اور حدیثیہ کے
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 295
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 295
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/295/mode/1up
    پیش کرنے سے عاجز آ گئے اور گریز گاہ باقی نہیں رہا اور کوئی حجت ہاتھ میں نہیں تو ناچار ہو کر کہہ دیتے ہیں کہ اس پر
    اجماع ہے کسی نے سچ کہا ہے کہ ملاآن باشد کہ بند نشود اگرچہ دروغ گوید۔ یہ حضرات یہ بھی جانتے ہیں کہ خود اجماع کے معنوں میں ہی اختلاف ہے۔ بعض صحابہ تک ہی محدود رکھتے ہیں۔ بعض
    قرون ثلاثہ تک بعض ائمہ اربعہ تک مگر صحابہ اور ائمہ کا حال تو معلوم ہو چکا اور اجماع کے توڑنے کے لئے ایک فرد کا باہر رہنا بھی کافی ہوتا ہے چہ جائے کہ امام مالک رضی اللہ عنہ جیسا عظیم
    الشان امام جس کے قول کے کروڑہا آدمی تابع ہوں گے حضرت عیسیٰ کی وفات کا صریح قائل ہو۔ اور پھر یہ لوگ کہیں کہ ان کی حیات پر اجماع ہے۔ شرم۔ شرم۔ شرم۔ اور اجماع کے بارے میں امام
    احمد رضی اللہ عنہ کا قول نہایت تحقیق اور انصاف پر مبنی ہے وہ فرماتے ہیں کہ جو شخص اجماع کا دعویٰ کرے وہ جھوٹا ہے۔ اس سے معلوم ہوا کہ مسلمانوں کے لئے سچی اور کامل دستاویز قرآن
    اور حدیث ہی ہے باقی ہمہ ہیچ۔ مگر جو حدیث قرآن کی بینات محکمات کے مخالف ہو گی اور اس کے قصص کے برخلاف کوئی قصہ بیان کرے گی۔ وہ دراصل حدیث نہیں ہوگی کوئی محرّف قول ہوگا یا
    سرے سے موضوع اور جعلی۔ اور ایسی حدیث بلاشبہ رد کے لائق ہوگی۔ لیکن یہ خدا تعالیٰ کا فضل اور کرم ہے کہ مسئلہ وفات مسیح میں کسی جگہ حدیث نے قرآن شریف کی مخالفت نہیں کی بلکہ
    تصدیق کی۔ قرآن میں متوفیک آیا ہے حدیث میں ممیتک آ گیا ہے۔ قرآن میں فلمّا توفیتنی آیا۔حدیث میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے وہی لفظ فلمّا توؔ فیتنی بغیر تغییر وتبدیل کے اپنے پر وارد کر کے
    ظاہر فرما دیا کہ اس کے معنے مارنا ہے نہ اور کچھ اور نبی کی شان سے بعید ہے کہ خدا تعالیٰ کے مرادی معنوں کی تحریف کرے۔ اور ایک آیت قرآن شریف کی جس کے معنے خدا تعالیٰ کے نزدیک
    زندہ اٹھا لینا ہو اسی کو اپنی طرف منسوب کر کے اس کے معنے مار دینا کر دیوے یہ تو خیانت اور تحریف ہے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف اس گندی کارروائی کو منسوب کرنا میرے نزدیک
    اول درجہ کا فسق بلکہ کفر کے قریب قریب ہے۔ افسوس کہ حضرت عیسیٰ کی زندگی ثابت کرنے کے لئے ان خیانت پیشہ مولویوں کی کہاں تک نوبت پہنچی ہے کہ نعوذ باللہ آنحضرت صلی اللہ علیہ
    وسلم کو بھی محرف القرآن ٹھہرایا بجز اس کے کیا کہیں کہ لعنۃ اللّٰہ علی الخائنین الکاذبین یہ بات نہایت سیدھی اور صاف تھی کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے آیت فلمّا توفیتنی کو اسی طرح
    اپنی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 296
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 296
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/296/mode/1up
    ذات کی نسبت منسوب کر لیا جیسا کہ وہ آیت حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی طرف منسوب تھی اور منسوب کرنے کے وقت یہ
    نہ فرمایا کہ اس آیت کو جب حضرت عیسیٰ کی طرف منسوب کریں تو اس کے اور معنے ہوں گے اور جب میری طرف منسوب ہو تو اس کے اور معنے ہیں۔ حالانکہ اگر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم
    کی نیت میں کوئی معنوی تغییر و تبدیل ہوتی تو رفع فتنہ کے لئے یہ عین فرض تھا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اس تشبیہ و تمثیل کے موقعہ پر فرما دیتے کہ میرے اس بیان سے کہیں یوں نہ سمجھ
    لینا کہ جس طرح میں قیامت کے دن فلمّا توفیتنی کہہ کر جناب الٰہی میں ظاہر کروں گا کہ بگڑنے والے لوگ میری وفات کے بعد بگڑے۔ اسی طرح حضرت مسیح بھی فلمّا توفیتنیکہہ کر یہی کہیں گے کہ
    میری وفات کے بعد میری امت کے لوگ بگڑے کیونکہ فلمّا توفیتنی سے میں تو اپنا وفات پانا مراد رکھتا ہوں لیکن مسیح کی زبان سے جب فلمّا توفیتنی نکلے گا تو اس سے وفات پانا مراد نہیں ہوگا بلکہ
    زندہ اٹھایا جانا مراد ہوگا۔ لیکن آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ فرق کر کے نہیں دکھلایا جس سے قطعی طور پر ثابت ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے دونوں موقعوں پر ایک ہی معنے مراد
    لئے ہیں۔ پس اب ذرا آنکھ کھول کر دیکھ لینا چاہیئے کہ جبکہ فلمّا توفیتنی کے لفظ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور حضرت عیسیٰ دونوں شریک ہیں گویا یہ آیت دونوں کے حق میں وارد ہے تو اس
    آیت کے خواہ کوئی معنے کرو دونوں اس میں شریک ہوں گے۔ سو اگر تم یہ کہو کہ اس جگہ توفی کے معنے زندہ آسمان پر اٹھایا جانا مراد ہے تو تمہیں اقرار کرنا پڑے گا کہ اس زندہ اٹھائے جانے میں
    حضرت عیسیٰ کی کچھ خصوصیت نہیں بلکہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم بھی زندہ آسمان پر اٹھائے گئے ہیں کیونکہ آیت میں دونوں کی مساوی شراکت ہے۔ لیکن یہ تو معلوم ہے کہ آنحضرت صلی
    اللہ علیہ وسلم زندہ آسمان پر نہیں اٹھائے گئے بلکہ وفات پا گئے ہیں اور مدینہ منورہ میں آپ کی قبر مبارک موجود ہے تو پھر اس سے تو بہرحال ماننا پڑا کہ حضرت عیسیٰ بھی وفات پا گئے ہیں۔ اور
    لطف تو یہ کہ حضرت عیسیٰ کی بھی بلاد شام میں قبر موجود ہے اور ہم زیادہ صفائی کے لئے اس جگہ حاشیہ میں اخویم حبّی فی اللّٰہ سید مولوی محمد السعیدی طرابلسی کی شہادت درج کرتے ہیں اور
    وہ طرابلس بلاد شام کے رہنے والے ہیں اور انہیں کی حدود میں حضرت
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 297
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 297
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/297/mode/1up
    عیسیٰ علیہ السلام کی قبر۱؂ ہے اور اگر کہو کہ وہ قبر جعلی ہے تو اس جعل کا ثبوت دینا چاہیئے۔ اورؔ ثابت کرنا چاہیئے کہ
    کس وقت یہ جعل بنایا گیا ہے اور اس صورت میں دوسرے انبیاء کی قبروں کی نسبت بھی تسلی نہیں رہے گی اور امان اٹھ جائے گا۔ اور کہنا پڑے گا کہ شاید وہ تمام قبریں جعلی ہی ہوں۔ بہرحال آیت فلمّا
    توفیتنی سے یہی معنے ثابت ہوئے کہ مار دیا۔ بعض نادان نام کے مولوی کہتے ہیں کہ یہ تو سچ ہے کہ اس آیت فلمّا توفیتنی کے مارنا ہی معنے ہیں نہ اور کچھ لیکن وہ موت نزول کے بعد وقوع میں آئے
    گی اور اب تک واقع نہیں ہوئی۔
    لیکن افسوس کہ یہ نادان نہیں سمجھتے کہ اس طور سے آیت کے معنے فاسد ہو جاتے ہیں کیونکہ آیت کے معنے تو یہ ہیں کہ حضرت عیسیٰ جناب الٰہی میں عرض
    کریں گے کہ میری امت کے لوگ میرے مرنے کے بعد بگڑے ہیں۔ یعنی جب تک میں زندہ تھا وہ سب صراط مستقیم پر قائم تھے اور میرے مرنے کے بعد میری امت بگڑی۔ نہ میری زندگی میں۔
    سو اگر
    یہ کہا جائے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام اب تک فوت نہیں ہوئے تو ساتھ ہی یہ بھی اقرار کرنا پڑے گا کہ ان کی امت بھی اب تک بگڑی نہیں۔ کیونکہ آیت اپنے منطوق سے صاف
    ۱؂ جب میں نے
    حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی قبر کی نسبت حضرت سید مولوی محمد السعیدی طرابلسی الشامی سے بذریعہ خط دریافت کیا تو انہوں نے میرےؔ خط کے جواب میں یہ خط لکھا جس کو میں ذیل میں
    معہ ترجمہ لکھتا ہوں۔
    یا حضرۃ مولانا وامامنا السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ نسأل اللّٰہ الشافی ان یشفیکم۔ اماما سالتم عن قبر عیسی علیہ السلام وحالات اخری مما یتعلق بہ فابیّنہ مفصّلا فی حضرتکم
    وھو ان عیسٰی علیہ السلام ولد فی بیت لحم وبینہ وبین بلدۃ القدس ثلثۃ اقواس وقبرہ فی بلدۃ القدس والی الان موجود وھنالک کنیسۃ وھی اکبر الکنائس من کنائس النصاری وداخلہا قبر عیسٰی علیہ السلام کما ھو
    مشہود وفی تلک الکنیسۃ ایضا قبر امہ مریم ولکن کل من القبرین علیحدۃ وکان اسم بلدۃ القدس فی عھد بنی اسرائیل یروشلم ویقال ایضا اورشلیم وسمّیت من بعد المسیح ایلیاء ومن بعد الفتوح الاسلامیۃ الی ھذا
    الوقت اسمہا القدس والاعاجم تسمیہا بیت المقدس
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 298
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 298
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/298/mode/1up
    بتلا رہی ہے کہ امت نہیں بگڑے گی جب تک وہ فوت نہ ہو جائیں۔ اور فوت کا لفظ یا یوں کہو کہ مرنے کی حقیقت کھلی کھلی ہے
    جس کو سارا جہان جانتا ہے۔ اور وہ یہ کہ جب ایک انسان کو فوت شدہ کہیں گے تو اس سے یہی مراد ہو گی کہ ملک الموت نے اس کی روح کو قبض کرکے بدن سے علیحدؔ ہ کر دیا ہے۔ اب منصفین
    انصافاًبتلاویں کہ حضرت عیسیٰ کی وفات پر اس سے زیادہ تر کیا ثبوت ہوگا اور کیا دنیا میں اس سے زیادہ تر منطقی فیصلہ ممکن ہے جو اس آیت نے کر دیا۔ پھر اس کے مقابل پر یہودیوں کی طرح خدا
    تعالیٰ کی پاک کلام کو تحریف کرکے اور گندے دل کے ساتھ اپنی طرف سے اس کے معنے گھڑنا اگر فسق اور الحاد کا طریق نہیں ہے تو اور کیا ہے۔ انصاف یہ تھا کہ اگر اس قطعی اور یقینی ثبوت کو
    ماننا نہیں تھا تو اس کو توڑ کر دکھلاتے۔ مگر ہمارے مخالفوں نے ایسا نہیں کیا اور تاویلات رکیکہ کر کے اور سچائی کے راہوں کو بکلی چھوڑ کر ہم پر ثابت کر دیا کہ ان کو سچائی کی کچھ بھی پروا
    نہیں ہے۔
    انہوں نے انکار حیات عیسیٰ کو کلمۂ کفر تو ٹھہرایا مگر آنکھ کھول کر نہ دیکھا کہ قرآن اور نبی آخر الزمان دونوں متفق اللفظ واللسان حضرت عیسیٰ کی وفات کے قائل ہیں۔ امام مالک
    و
    اما عدۃ امیال الفصل بینہا وبین طرابلس فلا اعلمہا تحقیقا نعم یعلم تقریبا نظرا علی الطرق والمنازل۔ وتختلف الطرق۔ الطریق الاول من طرابلس الی بیروت فمن طرابلس الی بیروت منزلین متوسطین (وقدر
    المنزل عندنا من الصباح الی قریب العصر) ومن بیروت الی صیدا منزل واحد ومن صیدا الی حیفا منزل واحد ومن حیفا الی عکامنزل واحد ومن عکا الی سور منزل واحد و یقال لبلاد الشام سوریہ نسبۃً الی
    تلکؔ البلدۃ فی القدیم۔ ثم من سور الی یافامنزل کبیر وھی علی ساحل البحر ومنہا الی القدس منزل صغیر والان صنع الریل منہا الی القدس ویصل القاصد من یا فا الی القدس فی اقل من ساعۃ فعدۃ المسافۃ من
    طرابلس الی القدس تسعۃ ایام مع الراحۃ والیہا طرق من طرابلس واقربھا طریق البحر بحیث لورکب الانسان من طرابلس بالمرکب الناری
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 299
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 299
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/299/mode/1up
    جیسے جلیل الشان امام قائل وفات ہو گئے۔ اور امام بخاری جیسے مقبول الزمان امام حدیث نے محض وفات کے ثابت کرنے کے
    لئے دو متفرق مقامات کی آیتوں کو ایک جگہ جمع کیا۔ ابن قیم جیسے محدث نے مدارج السالکین میں وفات کا اقرار کر دیا۔ ایسا ہی علامہ شیخ علی بن احمد نے اپنی کتاب سراج منیر میں ان کی وفات کی
    تصریح کی۔ معتزلہ کے بڑے بڑے علماء وفات کے قائل گذر گئے۔ پر ابھی تک ہمارؔ ے مخالفوں کی نظر میں حضرت عیسیٰ کی حیات پر اجماع ہی رہا۔ یہ خوب اجماع ہے۔ خدا تعالیٰ ان لوگوں کے حال
    پر رحم کرے یہ تو حد سے گزر گئے۔ جو باتیں اللہ اور رسول کے قول سے ثابت ہوتی ہیں انہیں کو کلمات کفر قرار دیا۔ انا للّٰہ وانا الیہ راجعون۔
    اب ہم اس تقریر کو زیادہ طول دینا نہیں چاہتے اور نہ
    ہم جتلانا چاہتے ہیں کہ مولوی رسل بابا صاحب کا رسالہ حیات المسیح کس قدر بے بنیاد اور واہیات باتوں سے پُر ہے۔ لیکن نہایت ضروری امر جس کے لئے ہم نے یہ رسالہ لکھا ہے یہ ہے کہ مولوی
    صاحب موصوف نے اپنے رسالہ مذکورہ میں محض عوام کا دل خوش کرنے کے لئے یہ چند لفظ بھی منہ سے نکال دیئے
    یصل الی یافا بیوم ولیلۃ ومنہا الی القدس ساعۃ فی الریل والسلام علیکم
    ورحمۃ اللّٰہ و برکاتہ ادام اللّٰہ وجود کم وحفظکم وایدکم ونصرکم علی اعدائکم۔ اٰمین۔
    کتبہ خادمکم محمد السعیدی الطرابلسی عفا اللّٰہ عنہ
    ترجمہ اے حضرت مولاناو امامنا السلام علیکم ورحمۃ اللہ
    وبرکاتہ میں خدا تعالیٰ سے چاہتا ہوں کہ آپ کو شفا بخشے۔ (میری بیماری کی حالت میں یہ خط شامی صاحب کا آیا تھا) جو کچھ آپ نے عیسیٰ علیہ السلام کی قبر اور دوسرے حالات کے متعلق
    سوال کیا ہے سو میں آپ کی خدمت میں مفصل بیان کرتا ہوں اور وہ یہ ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام بیت اللحم میں پیدا ہوئے اور بیت اللحم اور بلدہ قدس میں تین کوس کا فاصلہ ہے اور حضرت
    عیسیٰ علیہ السلام کی قبر بلدہ قدس میں ہے اور اب تک موجود ہے اور اس پر ایک گرجا بنا ہوا ہے اور وہ گرجا تمام گرجاؤں سے بڑا ہے اور اس کے اندر حضرت عیسیٰ کی قبر ہے اور اسی گرجا میں
    حضرت مریم صدیقہ کی قبر ہے اور دونوں قبریں علیحدہ علیحدہ ہیں۔ اور بنی اسرائیل کے عہد ؔ میں بلدہ قدس کا نام یروشلم تھا اور اس کو اورشلم بھی کہتے ہیں۔ اور حضرت عیسیٰ کے فوت ہونے کے
    بعد اس شہر کا نام ایلیاء رکھا گیا اور پھر فتوح اسلامیہ کے بعد اس وقت تک اس شہر کا نام
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 300
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 300
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/300/mode/1up
    ہیں کہ اگر ہمارے دلائل حیات مسیح توڑ کر دکھلاویں تو ہم ہزار روپیہ دیں گے۔ اگرچہ دلائل کا حال تو معلوم ہے کہ مولوی
    صاحب موصوف نے ناحق چند ورق سیاہ کر کے ایک قدیم پردہ اپنا فاش کیا اور ایسی بے ہودہ باتیں لکھیں کہ بجز دو نام کے ہم تیسرا نام ان کا رکھ ہی نہیں سکتے۔ یعنی یا تو وہ صرف دعاوی ہیں جن کو
    دلیل کہنا بیجا اور حمق ہے۔ اور یا یہودیوں کی طرح قرآن شریف کی تحریف ہے اس سے زیادہ کچھ نہیں۔ اور معلوم ہوتا ہے کہ ان کے دل میں بھی یہ یقین جما ہوا ہے کہ میری کتاب میں کچھ نہیں اس
    لئے انہوں نے اس پردہ پوشی کے لئے آخر کتاب کے کہہ بھی دیا ہے کہ میری کتاب سمجھ میں نہیں آئے گی۔ جب تک کوئی سبقاً سبقاً مجھ سے نہ پڑھے۔ یہ کیوں کہا۔ صرف اس لئے کہ ان کو معلوم
    تھا کہ میری کتاب دلائل شافیہ سے محض خالی اور طبل تہی ہے۔ اور ضرور جاننے والے جانؔ جائیں گے کہ اس میں کچھ نہیں۔ لہٰذا تعلیق بالمحال کی طرح انہوں نے یہ کہہ دیا کہ وہ دلائل جو میں
    نے لکھے ہیں ایسے پوشیدہ ہیں کہ وہ ہریک کو نظر نہیں آئیں گے اور صرف میری
    قدس کے نام سے مشہور ہے اور عجمی لوگ اس کو بیت المقدس کے نام سے بولتے ہیں۔ مگر طرابلس اور قدس میں
    جو فاصلہ ہے میں تحقیقی طور پر اس کو بتلا نہیں سکتا کہ کس قدر ہے ہاں راہوں اور منزلوں کے لحاظ سے تقریباً معلوم ہے۔ اور طرابلس سے قدس کی طرف جانے کی کئی راہیں ہیں۔ ایک راہ یہ ہے کہ
    طرابلس سے بیروت کو جائیں اور طرابلس سے بیروت تک دو متوسط منزلیں ہیں۔ اور ہم لوگ منزل اس کو کہتے ہیں جو صبح سے عصر تک سفر کیا جائے اور پھر بیروت سے صیدا تک ایک منزل ہے اور
    صیدا سے حیفا تک ایک منزل اور حیفا سے عکاتک ایک منزل اور عکاسے سور تک ایک منزل اور بلاد شام کو سوریہ اسی نسبت کی وجہ سے کہتے ہیں یعنی اس بلدہ قدیمہ کی طرف منسوب کر کے سوریہ
    نام رکھتے ہیں پھر سور سے یافاتک ایک منزل کبیر ہے اور یافا بحر کے کنارے پر ہے اور یافا سے قدس تک ایک چھوٹی سی منزل ہے اور اب یافا سے قدس تک ریل طیار ہو گئی ہے۔ اور اگر ایک مسافر یافا
    سے قدس کی طرف سفر کرے تو ایک گھنٹہ سے پہلے پہنچ جاتا ہے۔ سو اس حساب سےؔ طرابلس سے قدس تک نو دن کا سفر آرام کے ساتھ ہے مگر سمندر کا راہ نہایت قریب ہے۔ اور اگر انسان اگن
    بوٹ میں بیٹھ کر طرابلس سے قدس کو جانا چاہے تو یافاتک صرف ایک دن اور رات میں پہنچ جائے گا اور یافا سے قدس تک صرف ایک گھنٹہ کے اندر۔والسلام۔ خدا آپ کو سلامت رکھے اور نگہبان اور
    مددگار ہو اور دشمنوں پرفتح بخشے ۔ آمین۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 301
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 301
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/301/mode/1up
    زبان ان کی کنجی رہے گی اور جب تک کوئی میرے دروازہ پر ایک مدت ٹھہر کر اور میری شاگردی اختیار کر کے اس مجموعہ
    بکواس کو سبقاً سبقاً مجھ سے نہ پڑھے تب تک ممکن ہی نہیں کہ ان اوراق پراگندہ سے کچھ حاصل ہو سکے۔ اے فضول گو مولوی اگر تیرے دلائل ایسے ہی گور میں پڑے ہوئے اور تاریکی میں اترے
    ہوئے ہیں کہ وہ تیری کتاب میں ایک زندہ ثبوت کی طرح اپنا وجود بتلا ہی نہیں سکتے تو ایسی بیہودہ اور فضول کتاب کے بنانے کی ضرورت ہی کیا تھی جب تجھے خود معلوم تھا کہ دلائل نہایت نکمے
    اور بے معنی ہیں یہاں تک کہ تیرے زبانی بکواس کے سوا بے نشان ہیں تو ایسی کتاب کا لکھنا ہی بے سود تھا۔ بلکہ ان کا دلائل نام رکھنا ہی بے محل اور جائے شرم اور یاوہ گوئی میں داخل ہے۔
    اگرچہ اس پُر فتن دنیا میں ہزاروں طرح کے فریب ہو رہے ہیں مگر ایسا فریب کسی نے کم سنا ہو گا کہ جو اس مولوی رسل بابا صاحب نے کیا کہ دلائل سمجھنے کے لئے شاگردی اور سبقاً سبقاً کتاب
    پڑھنے کی شرط لگا دی اور دل میں یقین کر لیا کہ یہ تو کسی دانا سے ہرگز نہیں ہو گا کہ ایک نادان غبی کی شاگردی اختیار کرے اور اس کے شیطانی رسالہ کو سبقاً سبقاً اس سے پڑھے اس امید سے
    کہ حضرت مسیح کی زندگی کے دلائل ایسے پوشیدہ طور پر اس کی کتاب میں چھپے ہوئے ہیں کہ تمام دنیا اپنی آنکھوں سے ان کو دیکھ نہیں سکتی اور نہ ان کے رسالہ میں ان کا کچھ پتا لگا سکتی ہے۔
    اگرچہ ہزار یا کروڑ مرتبہ پڑھے اورنہ رسالہ میں ان کا کچھ پتہ لگ سکتا ہے کہ کہاں ہیں۔ صرف مصنف کی رہنمائی سے نظر آ سکتے ہیں۔ ورنہ قیامت تک پتہ لگنے سے نومیدی ہے۔
    اے ناظرین
    کیا آپ لوگوں نے کبھی اس سے پہلے بھی کوئی ایسی کتاب سنی ہے جس کے دلائل کتاب میں درج ہو کر پھر بھی مصنف کے پیٹ میں ہی رہیں۔ افسوس کہ آج کل کے ہمارے مولویوں میں ایسی ہی بیہودہ
    مکاریاں پائی جاتی ہیں جن سے مخالفین کو ہنسی اور ٹھٹھے کا موقعہ ملتا ہے۔ اس کی وجہ یہی ہے کہ جو فاضل اور عالم اور واقعی اہل علم ہیں وہ تو ان کوتہ اندیشوں اور نادانوں سے کنارہ کر کے
    ہماری طرف آتے جاتے ہیں۔ رہے نام کے مولوی جو اردو بھی
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 302
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 302
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/302/mode/1up
    اچھیؔ طرح لکھ نہیں سکتے اور قرآن کریم اور احادیث سے بے خبر ہیں وہ صرف آبائی تقلید کی وجہ سے ہمارے ایسے مخالف
    ہو گئے ہیں کہ خدا جانے ہم نے ان کے کس باپ دادے کو قتل کر دیا ہے۔ ان لوگوں کا رات دن کا وظیفہ گالیاں اور ٹھٹھا اور تکفیر ہے گویا کبھی مرنا نہیں۔ کبھی پوچھے جانا نہیں کہ تم نے کیوں
    مسلمانوں کو کافر کہا۔ خدا تعالیٰ سے لڑائی کر رہے ہیں ضد سے باز نہیں آتے۔ مگر ضرور تھا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی یہ پیشگوئی بھی پوری ہوتی کہ مہدی معہود یعنی وہی مسیح موعود
    جب ظہور کرے گا تو اس وقت کے مولوی اس پر فتوائے کفر لکھیں گے۔ اور پھر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ وہ لوگ فتویٰ لکھنے والے تمام دنیا کے شریروں سے بدتر ہوں گے اور
    روئے زمین پر ایسا کوئی بھی فاسق نہیں ہو گا جیسا کہ وہ اور ہرگز قبول نہیں کریں گے مگر نفاق سے۔ افسوس کہ ان سادہ لوحوں کو اتنی بھی سمجھ نہیں کہ جو شخص اللہ اور رسول کے قول کے
    مطابق کہتا ہے وہ کیونکر کافر ہو جائے گا ۔ کیا کوئی شخص اس بات کو قبول کر لے گا کہ وہ ہزارہا اکابر اور اہل اللہ جو تیرہ سو برس تک یعنی ان دنوں تک حضرت عیسیٰ کا فوت ہو جانا مانتے چلے
    آئے وہ سب کافر ہی ہیں۔ اور نعوذ باللہ امام مالک رضی اللہ عنہ بھی کافر ہیں جنہوں نے کروڑہا اپنے پیروؤں کو یہی تعلیم دی اور نعوذ باللہ امام بخاری بھی کافر جنہوں نے حضرت عیسیٰ کی موت کے
    بارے میں اپنے صحیح میں ایک خاص باب باندھا۔ ابن قیم بھی کافر جنہوں نے ان کو حضرت موسیٰ کی طرح موتٰیمیں داخل کیا۔ اور ان بزرگوں کے مسلمان جاننے والے بھی سب کافر۔ اور معتزلہ تمام
    کافر جن کا مذہب ہی یہی ہے کہ حضرت عیسیٰ درحقیقت فوت ہو گئے۔
    اے بھلے مانس مولویو کیا تمہیں ایک دن موت نہیں آئے گی جو شوخی اور چالاکی کی راہ سے سارے جہان کو کافر بنا دیا
    خداتعالیٰ تو فرماتا ہے کہ جو تمہیں السلام علیکم کہے اس کو یہ مت کہو کہ لَسْتَ مُؤْمِنًا یعنی اس کو کافر مت سمجھو وہ تو مسلمان ہے۔ لیکن تم نے ان کو کافر ٹھہرایا جو تمام ایمانی عقائد میں تمہارے
    شریک ہیں۔ اہل قبلہ ہیں اور شرک سے بیزار اور مدارِ نجات رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی جانتے ہیں اور پیروی سے منہ پھیرنے والے
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 303
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 303
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/303/mode/1up
    کو *** اور جہنمی اور ناری سمجھتے ہیں۔ اے شریر مولویو ذرہ مرنے کے بعد دیکھنا کہ اس جلد بازی کی شرارت کا تمہیں
    کیا پھل ملتا ہے۔ کیا تم نے ہمارا سینہ چاک کیا اور دیکھ لیا کہ اندر کفر ہے ایمان نہیں اور سینہ سیاہ ہے روشن نہیں۔ ذرہ صبر کرو اس دنیا کی عمر کچھ بہت لمبی نہیں۔
    تمہارے نزدیک صرف چند
    فتنہ انگیز مولوی جو اسلام کے لئے جائے عار ہیں مسلمان ہیں اور باقی سارا جہان کافر۔ افسوس کہ یہ لوگ کس قدر سخت دل ہو گئے۔ کیسے پردے ان کے دلوں پر پڑ گئے۔ یا الٰہی اس امت پر رحم کر
    اور ان مولویوں کے شرّ سےؔ ان کو بچا لے اور اگر یہ ہدایت کے لائق ہیں تو ان کی ہدایت کر ورنہ ان کو زمین پر سے اٹھا لے تا زیادہ شر نہ پھیلے اور یہ لوگ درحقیقت مولوی بھی تو نہیں ہیں تبھی
    تو ہم نے ان لوگوں کے سرگروہ اور امام الفتن اور استاد شیخ محمد حسین بطالوی کو اپنے رسالہ نور الحق میں مخاطب کر کے کہا ہے کہ اگر اس کو عربیت میں کوئی حصہ نصیب ہے تو اس رسالہ
    کی نظیر بنا کر پیش کرے اور پانچ ہزار روپیہ انعام پاوے مگر شیخ نے اس طرف منہ بھی نہیں کیا حالانکہ شیخ مذکور ان تمام لوگوں کے لئے بطور استاد کے ہے اور اُسی کی تحریکوں سے یہ مُردے
    جنبش کر رہے ہیں۔
    ہم بار بار کہتے ہیں اور زور سے کہتے ہیں کہ شیخ اور یہ تمام اُس کی ذریات محض جاہل اور نادان اور علوم عربیہ سے بے خبر ہیں۔ ہم نے تفسیر سورۃ الفاتحہ انہیں لوگوں
    کے امتحان کی غرض سے لکھی اور رسالہ نور الحق اگرچہ عیسائیوں کی مولویت آزمانے کے لئے لکھا گیا مگر یہ چند مخالف یعنی شیخ محمد حسین بطالوی اور اس کے نقش قدم پر چلنے والے میاں
    رسل بابا وغیرہ جو مکفّر اور بدگو اور بدزبان ہیں اس خطاب سے باہر نہیں ہیں۔ الہام سے یہی ثابت ہوا ہے کہ کوئی کافروں اور مکفروں سے رسالہ نور الحق کا جواب نہیں لکھ سکے گا۔ کیونکہ وہ
    جھوٹے اور کاذب اور مُفتری اور جاہل اور نادان ہیں۔
    اگر یہ ہمارے الہام کو الہام نہیں سمجھتے اور اپنے خبیث باطن کی وجہ سے اس کو ہماری بناوٹ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 304
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 304
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/304/mode/1up
    یا شیطانی وسوسہ خیال کرتے ہیں تو رسالہ نور الحق کا جواب میعاد مقررہ میں لکھیں اور اگر نہیں لکھ سکتے تو ہمارا الہام
    ثابت۔ پھر جن لوگوں نے اپنی نالیاقتی اور بے علمی دکھلا کر ہمارا الہام آپ ہی ثابت کر دیا تو وہ ایک طور سے ہمارے دعوے کو تسلیم کر گئے۔ پھر مخالفانہ بکواس قابل سماعت نہیں اور ہماری طرف
    سے تمام پادریان اور شیخ محمد حسین بطّالوی اور مولوی رسل بابا امرتسری اور دوسرے ان کے سب رفقاء اس مقابلہ کے لئے مدعو ہیں اور درخواست مقابلہ کے لئے ہم نے اِن سب کو اخیر جون
    ۱۸۹۴ ؁ء تک مہلت دی ہے اور رسالہ بالمقابل شائع کرنے کے لئے روزِ درخواست سے تین مہینہ کی مہلت ہے۔
    پھر اگر اخیر جون ۱۸۹۴ ؁ء تک درخواست نہ کریں تو بعد اُس کے کوئی
    درخواست سنی نہیں جائے گی اور نادانی ان کی ہمیشہ کے لئے ثابت ہو جائے گی اور مولویت کا لفظ اُن سے چھین لیا جائے گا۔ لیکن اگر وہ ماہ جون ۱۸۹۴ ؁ء کے اندر بالمقابل رسالہؔ بنانے کے لئے
    درخواست کر دیں تو تمام درخواست کنندوں کی ایک ہی درخواست سمجھی جائے گی اور صرف پانچ ہزار روپیہ جمع کرا دیا جائے گا نہ زیادہ۔ اور ان میں سے جو لوگ رسالہ بالمقابل بنانے میں فتح یاب
    سمجھے جائیں گے خواہ وہ عیسائی ہوں گے اور یا یہ حق کے مخالف نام کے مولوی اور یا دونوں۔ وہ اس پانچ ہزار روپیہ کو آپس میں تقسیم کر لیں گے اور ان کا اختیار ہو گا کہ سب اکٹھے ہوکر رسالہ
    بناویں غالباً اس طرح سے ان کو آسانی ہو گی مگر آخری نتیجہ ان کے لئے یہی ہو گا کہ خسر الدنیا والآخرۃ و سواد الوجہ فی الدارین۔ اور اگرہم ان کی اس درخواست کے آنے کے بعدجس پر کم سے کم
    دس مشہور رئیسوں کی گواہیاں ثبت ہونی چاہئیں اور جو کسی اخبار میں چھاپ کر ہمیں رجسٹری کرا کر پہنچانی چاہیئے۔ تین ہفتہ تک کسی بنک میں پانچ ہزا ر روپیہ جمع نہ کرا دیں تو ہم کاذب اور ہمارا
    سب دعویٰ کذب متصور ہو گا کیونکہ زبانی انعام دینے کا دعویٰ کرنا کچھ چیز نہیں ایک کاذب بد نیت بھی ایسا کر سکتا ہے۔ سچا وہی ہے کہ جو اُس کی زبان سے نکلا اس کو کر دکھاوے۔ ورنہ لعنۃ اللّٰہ
    علی الکاذبین۔ لیکن اگر ہم نے روپیہ جمع کرا دیااور
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 305
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 305
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/305/mode/1up
    پھر نفاق پیشہ لوگ مقابل پر آنے سے بھاگ گئے تو اس بدعہدی کے باعث سے جو کچھ خرچہ ہمارے عائد حال ہو گا وہ سب
    براہ راست یا بذریعہ عدالت اُن سے لیا جائے گا اور نیز اس حالت میں بھی کہ جب وہ جواب لکھنے میں عہدہ برا نہ ہو سکیں اس کا اقرار بھی ان کی درخواست میں ہونا چاہیئے۔
    اب ہم مولوی رسل
    بابا کے ہزار روپیہ کے انعام کا ذکر کرتے ہیں۔ ہم بیان کر چکے ہیں کہ مولوی رسل بابا صاحب نے اپنے رسالہ حیات المسیح کو ہزار روپیہ کی شرط سے شائع کیا ہے کہ جو شخص اُن کے دلائل کو
    توڑ دے اس کو ہزار روپیہ انعام دیا جائے۔ مگر مولوی صاحب موصوف نے اسی رسالہ میں یہ بھی بیان کر دیا ہے کہ وہ دلائل رسالہ مذکورہ میں ایک معما یا چیستان کی طرح مخفی رکھے گئے ہیں وہ
    کسی کو معلوم ہی نہیں ہو سکتے جب تک کوئی انہیں سے اس رسالہ کو سبقاً سبقاً نہ پڑھے۔ عقلمند معلوم کر گئے ہوں گے کہ یہ باتیں کس خوف نے ان کے منہ سے نکلوائی ہیں اور کون سا دل میں
    دھڑکا تھا جس سے ان روباہ بازیوں کی ضرورت ہوئی ہم تو ان باتوں کے سنتے ہی ڈائن کے اڑھائی حرف معلوم کر گئے اور سمجھ گئے کہ کس درد سے یہ سیاپا کیا گیا ہے اور کس خوف سے دلائل کا
    حوالہ اپنے پیٹ کی طرف دیا گیا ہے۔
    بہرحال ہم ان کو اس رسالہ کے ذریعہ سے فہمائش کرتے ہیں کہ وہ ماہ جون ۱۸۹۴ ؁ء کے اخیر تک ہزار روپیہ خواجہ یوسف شاہ صاحب اور شیخ غلام حسن
    صاحب اور میر محمود شاہ صاحب کے پاس یعنی بالاتفاق تینوں کے پاس جمع کرا کر اُن کی دستی تحریر کے ساتھ ہم کو اطلاع دیں جس تحریر میں اُن کا یہ اقرار ہو کہ ہزار روپیہ ہم نے وصول کر لیا
    اور ہم اقرار کرتے ہیں کہ مرز اغلام احمد یعنی راقم ہذا کے غلبہ ثابت ہونے کے وقت یہ ہزار روپیہ ہم بلا توقف مرزاؔ مذکور دے دیں گے اور رسل بابا کا اس سے کچھ تعلق نہ ہو گا۔ اس تحریر کی اس
    لئے ضرورت ہے کہ تا ہمیں بکلی اطمینان ہو جائے اور سمجھ لیں کہ روپیہ ثالثوں کے قبضہ میں آ گیا ہے اور تا ہم اس کے بعد مولوی رسل بابا کے رسالہ کی بیخ کنی کرنے کے لئے مشغول ہو جائیں۔
    اور ہم قصہ کوتاہ کرنے کے لئے اس بات پر راضی ہیں کہ شیخ محمد حسین بطّالوی یا ایسا ہی کوئی زہرناک مادہ والا فیصلہ کرنے کے لئے مقرر ہو جائے فیصلہ کے لئے یہی کافی ہو گا کہ شیخ
    بطّالوی مولوی رسل بابا صاحب کے رسالہ کو پڑھ کر اور ایسا ہی ہمارے رسالہ کو اول سے آخر تک دیکھ کر ایک عام جلسہ میں قسم کھا جائیں اور قسم کا یہ مضمون ہو کہ اے حاضرین بخدا میں نے اول
    سے آخر تک دونوں
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 306
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 306
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/306/mode/1up
    رسالوں کو دیکھا اور مَیں خدا تعالیٰ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ درحقیقت مولوی رسل بابا صاحب کا رسالہ یقینی اور قطعی طور
    پر حضرت عیسیٰ کی زندگی ثابت کرتا ہے۔ اور جو مخالف کا رسالہ نکلا ہے اس کے جوابات سے اس کے دلائل کی بیخ کنی نہیں ہوئی۔ اور اگر مَیں نے جھوٹ کہا ہے یا میرے دل میں اس کے برخلاف
    کوئی بات ہے تومَیں دعا کرتا ہوں کہ ایک سال کے اندر مجھے جذام ہو جائے یا اندھا ہو جاؤں یا کسی اور برے عذاب سے مَر جاؤں فقط۔ تب تمام حاضرین تین مرتبہ بلند آواز سے کہیں کہ آمین آمین آمین۔
    اور جلسہ برخاست ہو۔
    پھر اگر ایک سال تک وہ قسم کھانے والاان تمام بلاؤں سے محفوظ رہا تو کمیٹی مقرر شدہ مولوی رسل بابا کا ہزار روپیہ عزت کے ساتھ اس کو واپس دے دے گی۔ تب ہم بھی
    اقرار شائع کریں گے کہ حقیقت میں مولوی رسل بابا نے حضرت مسیح علیہ السلام کی زندگی ثابت کر دی ہے۔ مگر ایک برس تک بہرحال وہ روپیہ کمیٹی مقرر شدہ کے پاس جمع رہے گا اور اگر مولوی
    رسل بابا صاحب نے اِس رسالہ کے شائع ہونے سے دو ہفتہ تک ہزار روپیہ جمع نہ کرا دیا تو اُن کا کذب اور دروغ ثابت ہوجائے گا۔ تب ہر یک کو چاہیئے کہ ایسے دروغ گو لوگوں کی شر سے خدا تعالیٰ
    کی پناہ مانگیں اور اُن سے پرہیز کریں۔ واضح رہے کہ اس مخالف گروہ سے ہمیں عام طور پر تکلیف پہنچی ہے اور کوئی تحقیر اور توہین اور سبّ اور شتم نہیں جو اُن سے ظہور میں نہیں آیا۔ جب
    تکفیر اور گالیوں سے کوئی نقصان نہ پہنچا سکے تو پھر بد دعاؤں کی طرف رخ کیا اور دن رات بد دعائیں کرنے لگے مگر ایسے بخیلوں سیاہ دلوں کی ظالمانہ بددعائیں کیونکر اُس جناب میں قبول ہوں جو
    دلوں کے مخفی حالات جانتا ہے۔ آخر جب بدعاؤں سے بھی کام نہ نکل سکا تو خداتعالیٰ سے نومید ہو کر گورنمنٹ انگریزی کی طرف جھکے اور جھوٹی مخبریاں کیں اور مُفتریانہ رسالے لکھے کہ اس
    شخص کے وجود سے فساد کا اندیشہ اور جہاد کا خوف ہے۔ لیکن یہ دانا اور دقیقہ رس اور حقیقت شناس گورنمنٹ ایسی کم فہم تھوڑی تھی کہ ان چالاک حاسدوں کے دھوکہ میں آ جاتی۔ گورنمنٹ خوب
    جانتی ہے کہ ایسے عقیدے تو انہیں لوگوں کے ہیںؔ ۔ اور یہی لوگ ہیں جو صدہا برسوں سے کہتے چلے آئے ہیں کہ اسلام کو جہاد سے پھیلانا چاہیئے اور نہ صرف اسی قدر بلکہ یہ بھی ان کا قول
    ہے کہ جب ان کا فرضی مہدی ظہور کرے گا یا کسی غار میں سے نکلے گا اور اُسی زمانہ میں ان کا فرضی عیسیٰ بھی آسمان پر سے اُتر کر کوئی تیز حربہ کفار کے قتل کے لئے اپنے ساتھ ہی آسمان
    سے لائے گا تو دونوں مل کر دنیا کے تمام کافروں کو قتل کر ڈالیں گے اور جس نے اسلام سے انکار کیا خواہ وہ یہود میں سے ہو یا نصاریٰ میں سے وہ تہ تیغ کیا جائے گا۔ یہ
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 307
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 307
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/307/mode/1up
    ان لوگوں کے بڑے پکے عقیدے ہیں اگر شک ہو تو کسی مولوی کا عدالت میں حلفاً اظہار لیا جاوے۔ تاعدالت پر کھل جائے کہ کیا
    واقعی ان لوگوں کے یہی عقیدے ہیں یا ہم نے بیان میں غلطی کی ہے۔
    لیکن ہم گورنمنٹ کو بلند آواز سے اطلاع دیتے ہیں کہ اس زمانہ میں جنگ اور جہاد سے دین اِسلام کو پھیلانا ہمارا عقیدہ نہیں ہے
    اور نہ یہ عقیدہ کہ جس گورنمنٹ کے زیر سایۂ رہیں اور اس کے ظلِّ حمایت میں امن اور عافیت کا فائدہ اٹھاویں اور اس کی پناہ میں رہ کر اپنے دین کی بخوشئ خاطر اشاعت کر سکیں اُسی سے باغیوں
    کی طرح لڑنا شروع کر دیں۔ کیا اس گورنمنٹ انگریزی میں ہم اَمن اور عافیت سے زندگی بسر نہیں کرتے۔ کیا ہم حسب مرضی دین کی اشاعت نہیں کر سکتے۔ کیا ہم دینی احکام بجا لانے سے روکے
    گئے ہیں۔ ہرگز نہیں۔ بلکہ سچ اور بالکل سچ یہ بات ہے کہ ہم جس کوشش اور سعی اور امن اور آزادی سے اسلامی وعظ اور نصائح بازاروں میں، کوچوں میں،گلیوں میں اِس ملک میں کر سکتے ہیں اور
    ہر یک قوم کو حق پہنچا سکتے ہیں یہ تمام خدمات خاص مکہ معظمہ میں بھی بجا نہیں لا سکتے چہ جائیکہ کسی اور جگہ تو پھر کیا اِس نعمت کا شکر کرنا ہم پر واجب ہے یا یہ کہ مفسدہ بغاوت شروع
    کر دیں۔
    سو اگرچہ ہم مذہب کے لحاظ سے اِس گورنمنٹ کو بڑی غلطی پر سمجھتے اور ایک شرمناک عقیدہ میں گرفتار دیکھ رہے ہیں تاہم ہمارے نزدیک یہ بات سخت گناہ اور بدکاری میں داخل ہے
    کہ ایسے محسن کے مقابل پر بغاوت کا خیال بھی دل میں لاویں۔ ہاں بے شک ہم مذہبی لحاظ سے اس قوم کو صریح خطا پر اور ایک انسانی بناوٹ میں مبتلا دیکھتے ہیں۔ تو اس صورت میں ہم دعا اور توجہ
    سے اس کی اصلاح چاہتے ہیں اور خداتعالیٰ سے مانگتے ہیں کہ اس قوم کی آنکھیں کھولے اورؔ ان کے دلوں کو منور کرے اور انہیں معلوم ہو
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 308
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 308
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/308/mode/1up
    کہ انسان کی پرستش کرنا سخت ظلم ہے۔حضرت مسیح علیہ السلام کیا ہیں صرف ایک عاجز انسان اور اگر خداتعالیٰ چاہے تو
    ایک دم میں کروڑہاایسے بلکہ ہزارہا درجہ اُن سے بہتر پیدا کر دے وہ ہر چیز پر قادر ہے۔ جو چاہتا ہے کرتا ہے اور کر رہا ہے۔ مُشت خاک کو منور کرنا اس کے نزدیک کچھ حقیقت نہیں جو شخص
    صاف دل سے اور کامل محبت سے اس کی طرف آئے گابے شک وہ اس کو اپنے خاص بندوں میں داخل کر لے گا۔ انسان قرب کے مدارج میں کہاں تک پہنچ سکتا ہے اس کا کچھ انتہا بھی ہے ہرگز نہیں۔
    اے مُردوں کے پرستارو زندہ خدا موجود ہے اگر اس کو ڈھونڈو گے پاؤ گے۔ اگرصدق کے پَیروں کے ساتھ چلو گے تو ضرور پہنچو گے۔ یہ نامَردوں اور مخنّثوں کا کام ہے کہ انسان ہو کر اپنے جیسے
    انسان کی پرستش کرنا۔اگر ایک کو باکمال سمجھتے ہو تو کوشش کرو کہ ویسے ہی ہو جاؤ نہ یہ کہ اس کی پرستش کرو۔ مگر وہ انسان جس نے اپنی ذات سے اپنی صفات سے اپنے افعال سے اپنے اعمال
    سے اور اپنے روحانی اور پاک قویٰ کے پُر زور دریا سے کمال تام کا نمونہ علماً و عملاً و صدقاً و ثباتاً دکھلایا اور انسان کامل کہلایا بخدا وہ مسیح بن مریم نہیں ہے۔ مسیح تو صرف ایک معمولی سا نبی
    تھا۔ ہاں وہ بھی کروڑہا مقربوں میں سے ایک تھا۔ مگر اُس عام گروہ میں سے ایک تھا اور معمولی تھا اِس سے زیادہ نہ تھا۔ بس اس سے دیکھ لو کہ انجیل میں لکھا ہے کہ وہ یحییٰ نبی کا مرید تھا اور
    شاگردوں کی طرح اصطباغ پایا۔
    وہ صرف ایک خاص قوم کے لئے آیا۔ اور افسوس کہ اس کی ذات سے دنیا کو کوئی بھی روحانی فائدہ پہنچ نہ سکا۔ ایک ایسی نبوت کا نمونہ دنیا میں چھوڑ گیا جس کا
    ضرر اس کے فائدہ سے زیادہ ثابت ہوا اور اس کے آنے سے ابتلا اورفتنہ بڑھ گیا۔ اور دنیا کے ایک حصہ کثیرہ نے ہلاکت کا حصہ لے لیا مگر اس میں شک نہیں کہ وہ سچا نبی اور خداتعالیٰ کے مقربوں
    میں سے تھا۔ مگر وہ انسان جو سب سے زیادہ کامل اور انسان کامل تھا اور کامل نبی تھا اور کامل برکتوں کے ساتھ آیا جس سے روحانی بعث اور حشر کی وجہ سے دنیا کی پہلی قیامت ظاہر ہوئی اور
    ایک عالم کا عالم مَرا ہوا اس کے آنے سے زندہ ہو گیا وہ مبارک نبی حضرت خاتم الانبیاء امام الاصفیاء ختم المرسلین فخر النبیین جناب محمد مصطفےٰ صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ اے پیارے خدا اس پیارے
    نبی پر وہ رحمت اور درود بھیج جو ابتداء دنیا سے تُو نے کسی پر نہ بھیجا ہو۔ اگر یہ عظیم الشان نبی دنیا میں نہ آتا تو پھر جس قدر چھوٹے چھوٹے نبی دنیا میں آئے جیسا کہ یونس اور ایوب اور مسیح
    بن مریم اور ملاکی اور یحییٰ اور ذکریا وغیرہ وغیرہ ان کی سچائی پر ہمارے پاس کوئی بھی دلیل نہیں تھی اگرچہ سب مقرب اور وجیہ اور خداتعالیٰ کے پیارے تھے۔ یہ اُس نبی کا احسان ہے کہ یہ لوگ
    بھی دنیا میں سچے سمجھے گئے۔ اللّٰھم صل وسلّم و بارک علیہ و اٰٰلہ و اصحابہ اجمعین و اٰخر دعوانا ان الحمد للّٰہ ربّ العٰلمین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 309
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 309
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/309/mode/1up
    اَلْوَؔ صِیَّۃُ لِلّٰہِ لِقَوْمٍ لاَّ یَعْلَمُوْنَ
    أیہا العلماء والمشایخ والفقہاء۔ إنی رأیت تَعامیَکم فی مصنّفاتکم، فتأجج قلبی لجہلا تکم۔ إنکم
    تسیرون فی المَعامی، ولا تخافون جَوْبَ الحوامی*۔ وإنی عِفْتُ أن أفصّل حالاتکم، وأبیّن مقالاتکم۔ أتعامیتم مع سلامۃ البصر، وتجاہلتم مع العلم والخبر؟ کان عندکم العقل والفہم الصافی، ولکن النفس صارت
    ثالثۃ الأثافی۔ إنّ حبّ العَین سلَب عینَیکم، والطمع فی کرم الناس محَق کریمتَیکم۔ أَقَرَأْتم العلومَ للقِری، وتعلّمتم لرُغفان القُرٰی؟ وباعدتم عن الإخلاص الذی ہو شعار الأنبیاء وحلیۃ الأولیاء ۔ ترکتم الشریعۃ واتّبعتم
    النفس الدنیّۃ، وصرتم قوما خاسرین۔ أکلتم الدنیا بأنواع الدقاقیر228، وما نجا مِن فخّکم أحدٌ من القبیل والدبیر۔ طورًا تلدغون فی حلل العِظات، وأخری بالکَلِم المحفِظات۔ وأَجِدُ فیکم ما یَسِمُ بالإخلاق، وما أجد شیئا
    من محاسن الأخلاق۔ فإنّا للّٰہ علی مصیبۃ الإسلام، وإمحالِ ریاض خیر الأنام۔ وإنّا نکتب قصّتکم متجرّعًا بالغصص، ومتورّعا من مبالغات القِصص۔ إنکم جعلتم الإسلام مَصْطَبۃ المقیِّفین، أو خانَ المدروزین
    والمُشَقْشِقین۔ اتقوا اللّٰہ ویوم الأہوال، وحلولَ الآفات وتغیُّرَ الأحوال، واذکروا الحِمام ومساورۃ الإعلال، وفضوح الآخرۃ وسوء المآل۔ واترکوا الکِبر والعُجب والخیلاء ، فإنہا لا یزیدکم إلا الغطاء ۔ ولا تصحّ
    صفۃ العبودیۃ إلا بعد ذوبان جذبات الحیّۃ، أعنی ہوی النفس الذی ہو علی بحر السلوک کزبدٍ، فلا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 310
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 310
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/310/mode/1up
    تُطیعوا الزبد کعبد، واطلبوا بحر ماء معین۔
    واعلم یا طالِبَ الحقّ الأہمّ أن علماء السوء ما یخرجون من الفم ہو أضرّ علی الناس من
    السمّ، ومِن کلؔ بلاء یوجد علی وجہ الأرضین، فإن السموم إذا أضرّت فلا تضرّ إلا الأجسام، وأما کلامہم فیضرّ الأرواح ویُہلک العوام، بل ضررہم أشد وأکثر من إبلیس اللعین۔ یلبسون الحق بالباطل، ویسلّون
    سیوف المکر کالقاتل، ویُصرّون علی کلمات خرجت من أفواہہم وإن کانوا علی خطأ مبین۔ فاستعِذْ باللّٰہ منہم ومن کلماتہم، واجتنِبْہم وجہلا تہم، وکن مع العلماء الصادقین۔ ولا تضحک علی مواجید الأولیاء ،
    والأسرار التی کُشفت علی تلک الأصفیاء ، فإنہم مظاہر نور اللّٰہ وینابیع ربّ العالمین۔ واعلم أنہم قوم صادقون فی الأحوال، والمحفوظون فی الأفعال والأعمال، ویُعلَّمون من أشیاء لا یعلمہا عقل العلماء ،
    ویُعطَون من علم لا یُعطَی مثلہ أحدٌ من العقلاء ۔ فلا یُنکرہم إلا الذی فیہ بقیّۃ من مسّ الشیطان، وأثرٌ من آثار الجانّ، ولا یکفّرہم إلا الأعمی الذی لیس ہمّہ إلا تکفیر الصالحین۔ ألا إن للّٰہ عبادًا یحبّہم ویحبّونہ،
    آثرَہم وملأ قلوبہم مِن حبّہ وحبّ مرضاتہ، فنسوا أنفسہم استغراقا فی محبّۃ ذاتہ وصفاتہ، فلا تُعلِّق ہمّتک بإیذاء قومٍ لا تعرفہم ومنازلہم، وإنّک لا تنظر إلیہم إلا کعمین۔ إنہم خرجوا مِن خلقٍ کان مشابِہَ خلقِ
    وجودِک، وسعوا إلی مقام أعلی وتباعدوا عن حدودک، ووصلوا مکانا لا تصل إلیہا أنظارک، ولا تدرکہا أفکارک، ونزلوا بمنزلۃ لا یعلمہا إلا ربّ العالمین۔ فلا تدخل فی أقوالہم کمجترئین، ولا تتحرک بسوء الظنون
    وقلۃ الأدب معہم
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 311
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 311
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/311/mode/1up
    کالمعتدین، فیعادیک ربک وتلحق بالخاسرین۔ فإیّاک یا أخی أن تقع فی ورطۃ الإنکار، وتلحق بالأشرار، وتہلک مع الہالکین۔ واعلم أن
    کتاب اللّٰہ الرحمٰن، کسبعۃِ أبحرٍ من أنواع نکات العرفان، یشرب منہا کل طیر بوسع منقارہ، ویختار حقیرًا ولا یشرب إلا قدرا یسیرا۔ والّذین وسَّع مَدارکَہم عنایاتُ ربہم، فیشربون ماءً کثیرا وہم أولیاء الرحمٰن
    وأحبّاء أحسن الخالقین۔ یہُبُّ علی قلوبہم نفحاتٌ إلٰہیۃ، فیتعالٰی کلامہم، فیجہلہ عقول الذین لیسوا من العارفین۔ والذین یُعطَون أفعالا خارقۃ للعادۃ، وأعمالا متعالیۃؔ عن طور العقل والفکر والإرادۃ، فلا
    تعجب من أن یُعطوا کلماتٍ، ورُزقوا من نکات تعجز العلماء عن فہمہا، فلا تنہَضْ کالمستعجلین۔ وإن کنت من الذین أراد اللّٰہ بہم خیرًا، فبادِرْ و سِرْ إلیہم سیرًا، ودَعْ زورًا وضیرًا، وکن من الحازمین۔ وکم من
    کلمات نادرات بل محفظات، تخرج من أفواہ أہل اللّٰہ إلہامًا من اللّٰہ الذی ہو مؤیّد الملہَمین، فینہضون للّٰہ ویُبلّغونہا ویُشیعونہا، فتکون سببَ مرضاۃ اللّٰہ کہفِ المأمورین۔ ثم تلک الکلمات بعینہا بغیر تغییر
    وتبدیل تخرُج مِن فمٍ آخر، فیصیر قائلہا من الذین ترکوا الأدب واجترء وا وصاروا من الفاسقین۔ فتأدَّبْ مع أہل اللّٰہ ولا تعجَلْ علیہم ببعض کلماتہم۔ وإن لہم نیّاتٍ لا تعرفہا، وإنہم لا ینطقون إلا بإشارۃ ربّہم، فلا
    تُہلک نفسک کالمجترئین۔ لہم شأن لا یفہمہ إنسان، فکیف مِثلک فتّان، إلا مَن سلک مسلکہم، وذاق مذاقہم، ودخل فی سِککہم، فلا تنظرْ إلی وجوہ مشایخ الإسلام وکبراء الزمان، فإنہم وجوہ خالیۃ من نور الرحمٰن،
    ومِن زیّ العاشقین۔ ولا تحسب کلمات المحدَّثین المکلَّمین ککلماتک أو کلمات أمثالک
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 312
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 312
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/312/mode/1up
    من المتعسّفین۔ فإنہا خرجت من أنفاس طیّبۃ، ونفوس مطہَّرۃ مُلہَمۃ، وہی قریب العہد من اللّٰہ تعالٰی کثمرٍ غضٍّ طریٍّ أُخذ الآن من
    شجرۃ مبارکۃ للآکلین۔ والقوم لما لم یفہموا کلمات لطیفۃ دقیقۃ حِکَمیّۃ إلٰہیّۃ، فعزَوا أہلہا إلی الفُسّاق والزنادقۃ والکفّار وأہل الأہواء ۔ فیاحسرۃ علیہم وعلی تلک الآراء ، إنہم قد ہلکوا إن لم یتوبوا ولم یرجعوا
    منتہین۔ والأحرار ینتقلون من القالب إلی القلب، وہم انتقلوا من القلب إلی القالب، ونبذوا کل ما علموا وراء ظہورہم للبخل الغالب، فأصبحوا کقِشرٍ لا لُبَّ فیہ وأکلوا الجیفۃ کالثعالب، وکفّرونی ولعنونی من غیر
    علم لیستروا الأمر علی الطالب، وقالوا کافر کذّاب، واتبعوا دأب الذین خلوا من قبلہم من أہل التباب۔ وکانوا یقولون من قبل إنّ رجلا لا یخرج من الإیمان باختلافاتٍ لیس فیہا إنکار تعلیم القرآن، وإنما الحُکم
    بالتکفیر لمن صرّح بالکفر واختارہ دینا، وأنکر دین اللّٰہ القدیر وجحد بالشہادتین کالأعداء اللئام، وخرؔ ج عن دین الإسلام، وصار من المرتدّین۔ وقالوا لو رأینا فی ہذا الرجل خیرا أو رائحۃً من الدّین ما کفّرنا وما
    کذّبنا وما تصدّینا للتوہین۔ کلا، بل قسَتْ قلوبہم من الإصرار علی الإنکار، ودعاوی الریاء وفتاوی الاستکبار، فطبع علیہا طابع وما وُفِّقوا أن یرجعوا مع الراجعین۔ ولو شاء اللّٰہ لأصلح بالہم وطہّر مقالہم،
    وجذبہم وأراہم ضلالہم، ولکنہم زاغوا وأحبّوا عیوبہم، فغضب اللّٰہ علیہم وأزاغ قلوبہم، وترکہم فی ظلمات، وجعلہم کصُمٍّ وعمین۔أیہا العَجول، اتق اللّٰہ وخَفْ أولیاء اللّٰہ الودود، ولا خَوْفَک من الأسود، وإذا
    رأیتَ رجلا تبتّلَ إلی اللّٰہ، وما بقی لہ شیء یشغلہ عن ربّہ، فلا
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 313
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 313
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/313/mode/1up
    تتکلم فیہ ولا تجترء علی سبّہ، أتحارب اللّٰہ یا مسکین، أو تقتل نفسک کالمجانین؟ واعلم أن أولیاء الرحمن یُطرَدون ویُلعنَون ویُکفَّرون
    فی أوائل الزمان، ویقال فیہم کل کلمۃ شرّ، ویسمعون من قولہم کل الہذیان، ویسمعون أذًی کثیرا من قومہم ومن أہل العدوان، ویسمّونہم أجہلَ الناس وأضلّ الناس، مع کونہم من أہل العارفۃ والعرفان، ویسمّونہم
    دجّالین وعَبَدۃ الشیطان؛ ثم یجعل اللّٰہ الکرّۃَ لہم، ویُؤیَّدون ویُنصَرون ویُبرَّأون مما یقولون، ویأتیہم الدولۃُ والنصرۃ من عند اللّٰہ فی آخر أمرہم من اللّٰہ المنّان، وکذلک جرت عادۃ اللّٰہ الدیّان، أنہ یجعل العاقبۃ
    للمتّقین۔ وإذا جاء نصرہ فتری قلوب الناس کأنہا خُلقت خلقًا جدیدا، وبُدِّلت تبدیلا شدیدا، وتری الأرض مخضرّۃ بعد موتہا، والعقول سلیمۃ بعد سخافتہا، والأذہان صافیۃ والصدور مطہّرۃ بإذن قادرٍ قیّومٍ ومُعین۔
    فیسعون إلیہم بالمحبّۃ والوداد، نادمین من أیام العناد، ویُثنون علیہم باکین قائلین إنّا تُبنا فاغفر لنا ربّنا إنّا کنّا خاطئین، ومن یرحم إلا ہو وہو أرحم الراحمین۔ ہذا مآل الذین سُعدوا وفُتحت أعینہم وجُذبوا، وأمّا الذین
    شقوا فلا یرون حتی یُرَدّون إلی عذاب مہین۔ رب أَرِنا أیامَک، وصدِّقْ کلامک، وفرِّجْ کرباتِنا، واغفِرْ زلّاتِنا، وارْضَ عنّا وتعال علی میقاتنا، وانصرنا علی القوم الکافرین۔ وصلِّ وسلِّمْ وبارِکْ علی رسولک۱ خاتم
    النبیین۔ آمین ربنا
    آمین۔
    Ruhani Khazain Volume 8. Page: 314
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۸- اتمَامُ الحجَّۃِ: صفحہ 314
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=8#page/314/mode/1up
     
    Last edited: ‏جنوری 22, 2018

اس صفحے کو مشتہر کریں