1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 5 ۔ آئینہ کمالات اسلام ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جولائی 17, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 501
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 501
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    منؔ اقوام الجیل و کان زمام الحکومۃ اذ ذاک بید اقتدار الملک الذی کان اسمہ ’’بابر‘‘ و کان من الذین یکرمون الشرفاء و یعظمون۔ فاعزّھم
    و أکرمھم و أعطاھم قری کثیرۃ و جعلھم من امراء ھذہ الدیار و اھل الأرضین و عظماء الحراثین و زعماءھم و من الذین یتملکون۔ فرقوا فی مدارج الاقبال و زادوا أموالا و أراضی و إمارۃ و کانوا مع إماراتھم
    و ثروتھم یتقون اللّٰہ و فی سبل الخیر یسلکون۔ و فی ایام امارتھم تَھلّل وجہ الاسلام فی رعایاھم و اقوامھم و کانوا اتقیاء و کانت الامم لھم یخضعون۔
    ترجمہ:آنہا را شبِ ادبار در د امان فرو نہضت کہ بدکرداران و فاسقان را از پادشاہان عقاب الیم و رسوائی عظیم نصیب حال شود۔ خلاصہ از شومئی سیاہ کاری ضعف و اختلال درکار آنہا راہ یافتہ گردن از ربقۂ کلمۂ واحدہ برون کشیدہ عہد توادد و تعاون را از ہم گسیختند و از بغی و عناد و تحاسد و تنافس بر استیصال ابنائے قوم فرو ریختند۔ و از ہر گونہ تورع و اتقا و رشد و صلاح اعراض ور زیدہ رو بہ ارتکاب منہیات و معاصی آوردند۔ و فرایض و حدود اللہ را پشت پازدہ رکون و سکون بمتاع فانی دنیا کردند۔ از این زیغان و طغیان کار بجائے رسید کہ بعضے از ایشان ارتداد از دین اسلام و شعائر کفرۂ ہنود را شعار و د ثار خود ساختند۔ در خلال این احوال تنور غضب الٰہی در فوران آمدۂ ارادۂ آن کرد کہ ملک را از دست آنہا انتزاع نماید۔ لا جرم قومہا را
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 502
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 502
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    و ؔ کانوا یرغبون فی الصالحات و فعل الخیرات و یمسکون بکتاب اللّٰہ
    و ینصرون دین اللّٰہ و الی نوائب الحق یأفدون۔ و بعد ذالک الایام قُلِّب امر سلطنۃ الاسلام و تطرق الاختلال و الضعف فیھا لیصیب الذین اجرموا من الملوک صغارمن عند اللّٰہ و عذاب شدید بما کانوا نسوا حدود اللّٰہ
    و بما کانوا یعتدون۔ فصاروا طرائق قددًا یبغی بعضھم علی بعض و یقتلون انفسھم و یفسدون۔ و ترکوا کل رشدٍ و صلاح و مالوا إلی ما یباین الورع و کانوا فی أعمالھم یعتدون۔ و لم یبق فیھم من یتعاشر بالمعروف و یرحم
    ترجمہ: برانگیخت کہ دست تطاول و اعتدا بر مقبوضات و متصرفات آنہا دراز کردند و اکنون شہرے و دیگر قریۂ مرۃ بعد اخری از دست آنہا بدر رفت و قوت و شوکت آنہا بالمرۃ رو بانحطاط و اضمحلال آوردہ در ہر ناحیتے و طرفے ملکے و عالمے سر بالاکشید و ہریکے از خود سری و خلیع العذاری دم زدن بنا کرد و خیلے شگرف طوفان بے تمیزی در تموج بود۔ ہر حدی و ثغری ملکی فریدی داد کامرانی و مطلق العنانی در آن میداد۔ ہمچنیں بزرگان این بندہ بے منازعت انبازی و سہیمی زمام اختیار بعض حدود را در دست و شاہانہ اقتدار برآن داشتند و در ہمۂ امور سیاہ و سپید و دار و گیر رعایا و برایا قضا یا وحکومتہا بایشان مرفوع می شد۔ و در فصل مہام زیر دستان پیوستہ خوف الٰہی مطمح انظار آنہا بودہ۔ قوتی و دولتے قاہر برسر آنہا نبود کہ می بایست روئے استیذان بدومی آوردند۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 503
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 503
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    علیؔ الضعیف المؤوف بل عاقب بعضہم بعضًا بالسیوف و ارادوا ان یأکلوا شرکاء ھم و یستأصلوا اخوانھم و اکابرھم و آباء ھم و کانوا من بعدھم کالذین لا شریک لھم فی الملک و ھم متوحدون۔
    و اکثرھم کانوا یعملون السیئات و یستوفون دقائق الشھوات
    و یترکون فرائض اللّٰہ و حدودہ و الی شرک الاھواء یوفضون ثم لا یقصرون۔ و فرحوا بما عندھم من الدنیا واستقرء وا طرقا منکرۃ
    و أخذوا سبلا منقلۃ و طاغوا و زاغوا وانتہی امرھم الی فساد ذات البین فسقطوا من الزین فی الشّین فَغُیِّر زمانھم و قُلِّب دھرھم، ذالک
    ترجمہ: خلاصہ بعد از مرور دہور صالحان و متقیان از پدران ما از عالم ناپائدار پدرود شدہ اخلاف اجلاف جائے آنہا گرفتند۔ و در ایام خود بالنوبہ انہماک در شہوات عاجلہ و اضاعت جمیع امور صالحہ را وجہ ہمت خود قراردادند۔ بالجملہ کافۂ امرائے مسلمین در آن عہد ہیچ شغلے غیر از استیفائے لذات دنیہ و ارتکاب بر معاصی و مناہی نداشتند۔ و عمل بر احکام قرآن و اقامت صلوٰۃ را ہمہ خط کش نسیان ساختند۔ چون کار بدین غایت انجراریافت کہ از فقدان حرارت ایمانی و برودت غرازت دینی جسم بے روح و ہمہ ہاسگان جیفہ خوار دنیا و ملوث بقاذورات آن شدند خدائے علیم حکیم خواست آنہارا ازین خواب غفلت بیدار و از معارج بلند متنزّل و ذلیل و خوار سازد بیک ناگاہ گروہے از پرستاران اصنام کہ خود را خالصہ می گفتند از کنج خمول بمیدان بروز کردند۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 504
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 504
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    بأنؔ اللّٰہ لا یرضی ان یرث ارضہ الفاسقون۔ و کان بعضھم کمثل الذین ارتدوا من دین الاسلام و خلعوا عنھم رداء اسوۃ خیر الانام
    وکانوا لا یعرفون نعماء اللّٰہ ولا یشکرون۔ فغضب اللّٰہ علیھم و مزق ملکھم و جعلہ عضینَ و بعث اقوامًا کانوا یبسطون ایدیہم الی ممالکھم و یقتسمون۔ و کان ذالک الزمن زمان طوائف الملوک و کانوا الی ثغورھم یحکمون۔ و کان آبائی منھم یامرون علی ثغرھم و کالملوک علی قراھم یقتدرون۔ و کان یُرفع الیھم ما وقع فی رعایا ھم فکانوا یحکمون کیف یشاء ون و لا یخافون الا اللّٰہ و لا
    ترجمہ: این غولان بیابان از دانش و بینش عاری و از زیور آدمیت عاطل بودند۔ چون بدیدہ اعتبار نگاہ کنیم این دو و دام و حشرات و ہوام پاداش و خامت اعمال و کیفرکردار ہائے مسلمانان بودند کہ آنہا بر تجاوز از حدود الٰہیہ و مجاہرت اعمال سیۂ آگاہ شوند۔ خلاصہ آن گروہ خالصہ کہ غاشیۂ عامہ بودند ہمہ جدوجہد بر استیصال مسلمانان و استخلاص متملکات را ا ز ایشان مقصود و محصور داشتند و در ہر مصاف و میدان نصرت و ظفر ہمرکاب انہا بود۔ در این ہنگامہ پر آشوب مصائب و نوازل فوق العادۃ مخصوصًا برسر پدران مافرود آمد باین معنی کہ آن گروہ خالصہ کہ فی الحقیقت طائفہ قطاع الطریق و ناجوانمردان سیاہ اندرون بودند از متصرفات و اثاثہ وامتعہ ہر چہ دردست پدران مابود بقبض و تصرف خود در آوردند۔ و برقتل و نہب و تخریب عمارات و ہدم بنیانہا و تفریق و تشتیت اجیال آنہا اکتفا نہ کردہ آتش در وار کتب آنہا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 505
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 505
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    یستجیزون احدا و لا یستاذنون۔ ثم نُقل صلحاء آبائی الی جوار رحمۃ اللّٰہ و خلف من بعدھم قوم اضاعوا الصالحات المسنونات
    و ما رعوھا حق رعایتھا و وقعوا فی البدعات والرسوم و ما تعافوھا
    و کانوا لدنیاھم یلتاعون۔ و کذالک ھبّت الریح فی تلک الایام علی جمیع امراء المسلمین و طوائف ملوکھم و غفلوا من الانقیاد الی اللّٰہ والاخبات لہ و عصوا أحکام القرآن و اذا قاموا الی الصلوۃ قاموا کسالی و کانوا یراء ون و لا یخلصون۔ و نظر اللّٰہ الیھم فوجدھم کاجساد لا ارواح فیھا ورآھم انھم انتکسوا علی الدنیا وکانوا
    ترجمہ: زدند۔ چنانچہ پنج صد از مجلدات کتاب اللہ الفرقان ازین حرق ببا درفت۔ مسلمانان این ہمہ بے اندامی و خیرگی را بدیدۂ سرمیدیدند و از عجز وبیچارگی خاموش بودند۔ بالآخر آتش این فتنہ بحدے سرکشید کہ مساجد ما معابد بتان ناپاک و عزیزان ما ذلیل و اکثرے عرضۂ حسام خون آشام آن لیام واجب الملام گردیدند۔ زمین باہمہ سعت و فراخی برغربائے مسلمین تنگ آمد۔ ناچار با جماعۂ از عشائر و قبائل و خدم و غلامان در رنگ آل حضرت یعقوب ہر طرف سرگردان و حیران می گشتند۔ کفار ملاعین در بلاد آنہا شعار و رسوم کفر و شرک را اشاعت و ترویج دادند و در محو آثار امور اسلام سعی ہر چہ تمامتر درکار کردند۔ عجزۂ مسلمانان را درین ایام کاربجان رسید کہ ہیچکس قدرت آن نداشت کہ قرآن را جہراً تلاوت کند و اذان نماز را در مسجد بگوید و گاوی را ذبح نماید و کسے را کہ برضا و رغبت خواہد اسلام آرد در دین خود
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 506
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 506
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    مماؔ سواھا یستوحشون۔ وکانوا یشفقون علی مھمات دنیاھم و علی الدین لا یشفقون۔ و تلطخوا بقاذورات النشأۃ الاولی و غفلوا عن النشأۃ الثانیۃ فما طلبوھا و ما کانوا یطلبون۔ فاقتضت حکمۃ اللّٰہ تعالی لینبّھھم و اراد ان ینزع الملک منہم و یؤتی قومًا من عبدۃ الاوثان کانوا یسمون انفسھم ’’خالصۃ‘‘ و کانوا أمیّین لا یعلمون شیءًا و لا یعقلون۔ فأھاج اللّٰہ تقریبات عجیبۃ لنصرتھم و اقبالھم و ازعاج شجرۃ المسلمین و حطمھم لیعلموا انھم فسقوا أمام ربھم و انھم ظالمون۔ فقام ’’الخالصۃ‘‘ بجمیع الجھد
    ترجمہ:داخل فرماید۔ واگر چنانچہ کسے از مسلمانان مبادرت باین امور کرد جزائے آن قتل شنیع و اقلًا تقطیع دست و پا بود واگر برکسے رحم آوردند در چاہ زندانش محبوس کردند و بگزاشتند کہ تشنہ و گرسنہ ہمان جا روز زندگی را بشب آرد۔ خلاصہ مسلمانان در این ایام ہدف آلام گوناگون و مظلوم و ملہوف بودند۔ و ہمہ گوشہا از استماع نالہ و گریہ آنہا پنبہ آگندہ و کرشدہ بود۔ خانہ و مسکن را بنا می انداختند ولے نمی شد در آن سکنی بگیرند۔ از تجارہ و اکتساب زر بدست می آوردند۔ اما بر ازان نمی خوردند۔ کمتر روزے میگزشت کہ وقتے قتل گاہے غارت و زمانے اسیری و قید نصیب حال آنہا نمی شد۔ زراعت می کردند ولے نمی شد خرمن اندوزند۔ شہرہا ویران و راہ ہا پر خوف و زراعت معدوم و اموال مفقود و مسجد ہا وحشت افزا و علوم ناپدید گشت۔ مسلمانان در چشم آنہا بیش از ملخ و مور وقعت و
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 507
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 507
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    و اؔ لھمۃ لیستأصلوا المسلمین و یصفو ملکھم لھم و اعانھم اللّٰہ عونًا عجیباً فکانوا فی کل موطن یغلبون۔ ففی ھذہ الایام صبت علی آبائی حوادث و نوازل و استولی ’’الخالصۃ‘‘ علی بلادھم و جاسوا د یارھم
    و غصبوا ملکھم و ریاستھم واستخلصوھا من ایدیھم و نھبوا اموالھم
    و خربوا عماراتھم و فرقوا أجیالھم و أحرقوا دار کتبھم و أُحرق فیھا زھاء خمسماءۃ مجلدات کتاب اللّٰہ الفرقان و کان المسلمون ینظرون إلیھا ویبکون۔ واتخذوا مساجد ھم معابد اصنامھم وقتلوا کثیرًا منا بحسامھم
    و جعلوا أعزّتنا اذلۃ۔ حتی اذا بلغت الکربۃ منتھاھا و أحاطت الھموم علی آبائی
    ترجمہ: وزن نداشتند۔ آخر بعضے ازین ذلت روز افزون بہ تنگ آمدہ و نار سقر را بر عار برگزیدہ ترک وطن عزیز گفتند و اکثرے کہ تحمل مشاق ہجرت نتوانستند در دست بیداد کفار ناہنجار اسیر و پا در زنجیر ماندند۔ و ہر روز طعمۂ اژدہائے جور و جفائے آنہامی شدند۔ چون ہیچ حیلتے نماند و ہمہ در ہائے خلق بر روئے آنہا بستہ شد ناچار مسلمانان روبہ درگاہ آفریدگار توانا آوردند و جبین تضرع و ابتہال بر خاک آستان خالق زمین و زمان بسودند و کشف این بلیہ و *** را گریہ وبکاہا نمودند۔ اللہ اللہ ہزاران ہزار از آنہا بجرم ذبح گاوے یا خواندن اذان و صلوٰۃ بقتل رسیدند۔ از ایذاء و عذاب متصل کم ماندہ بود ہمہ ہلاک شوند۔ می گریستند و نوحہ ہا میکردند۔ زلزلہ ہا بر ایشان وارد شد و ناکردہ گناہ کشتہ می شدند الی اینکہ نالہائے یتیمان و فغان بیوہا تا بعرش
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 508
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 508
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    و ؔ ضاقت الأرض علیھم بما رحبت و اُخرجوا من دار ریاستھم فی نفر من اخوانھم و عبیدھم و خدمھم فکانوا فی کل ارض یتیھون۔ و أظھر الکفرۃ فی بلادھم شعائر الکفر و محوا آثارالاسلام و جعلوھا غثاءً و قلبوا الأمور کلھا و کذالک کانوا یفعلون۔ فأصابت المسلمین فی ھذہ الایام مصیبۃ عظیمۃ و داھیۃ عامۃ و ما کان لأحد ان یؤذن فی مسجد أو یقرأ القرآن جھرًا او یدخل احدًا من الھنود فی دین اللّٰہ أو یذبح بقرۃ، و کان الجزاء فی کل ھذہ الامور القتل والنھب و إن خُفّف فتقطیع الایدی والأرجل و ان رُحِمَ علیہ
    ترجمہ: رسید۔ زمین را در زیر قدم فساق اشرار تپ لرزہ بگرفت و مقربان و صالحان دست در دامان عفو و رحمت الٰہی بزدند۔ چون دعائے ضعیفان و بے تابان در حضرت خداوندی مجتمع شد و توجہات مقرّبان مضاف بآن گردید و از ہر سو اسباب مساعدت کرد۔ و خداوند کریم دید کہ مسلمانان در ہر چیز از مال و جان و عیال و عرض و متاع و رحال و عقاید و اعمال عرضۂ مصائب شدہ اند و نوازلہا بحد غایت رسیدہ از فور کرم ترحم برحال گنہ گاران کردہ گوش اجابت بر دعاہائے بندگان برگزیدۂ خود گزاشت۔ بند گانی کہ چون از پشیمانی آمرزش بخواہند آمر زیدہ شوند۔ و چون نزول رحمت را دست بیازند و زارنالیہا کنند بخشائیدہ شوند۔ و چون از جوش زاری و نیاز فغان بکشند یاری و یاوری کردہ شوند و چون بر پیش آمدن اندوہے و رنجے بر روافتند تائید دادہ شوند۔ و چون حلقۂ در توبہ را بزنند مار دادہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 509
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 509
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    فاؔ لحبس الشدید حتی یموت فی السجن ظمأً و مخمصۃً و ھم یشھدون۔ و کان المسلمون مظلومین مجروحین مغصوبین مضروبین کل الایام و ما کان لھم محیص و لا مناص و لا مخلّص و لا راحم وکانوا من کل باب یُطْرَدون۔ و کانوا یبنون بیتًا و لا یبیتون فیھا ویکسبون أموالا و لا ینتفعون منھا و لا یحظون وکانوا من کل جھۃ شُنَّت الغارات علیھم و یُنْھَبون۔ و کانوا تارۃ یحبسون و تارۃ یُقتلون و أخری الی السبی یذھبون۔ وکانوا یزرعون بجھد مھجتھم و لا یاکلون مما زرعوا شیئا و لا یدّخرون۔ صُیّرت المدن خربۃ
    ترجمہ: شوند۔ خلاصہ دعاہا مستجاب شد و تیر ہا بہ ہدف نشست۔ و قضائے مبرم علی الغفلہ فتوی بہ ہلاک و بوار خالصۂ ناہنجار امضا فرمود۔ چون وقت تباہی و خرابی آنہا در رسید آتش عداوت و تباغض درمیان آنہا اشتعال و التہاب پزیرفت و قتل ابنائے جنس را مقصود غائی قراردادہ درندہ وار دنبال از ہم دریدن برادران افتادند۔ و ہریکے درین اندیشہ و کمین بود کہ برادر و انباز رابکشد بجہت اینکہ جائے او را بدست آرد۔ و بعد از او خود را حاکم با اقتدار بسازد۔ ازین بدسگالیہا کار بجائے رسید کہ بر پدران و اعمام و برادران و پسران و زنان خود ہا تیغ بے دریغ از نیام برون کشیدند۔ و در روزے چند روئے زمین از وجود نجس و رجس آنہا پاک گشت و خونناب بے اندامیہا را فروخوردند۔ و در آن ایام انقسام بر فرق و شعب یافتہ و ہر سو متفرق و منشعب شدہ کمر بر افساد و اضرار بے چارگان چست
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 510
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 510
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    و اؔ لطرق مَخوفۃ والزروع معدومۃ والاموال مفقودۃ والمساجد موحشۃ والعلوم موء ودۃ، و کان المسلمون فی أعینھم کالجراد و فی الازدراء یزیدون۔ و کان طائفۃ منھم یھاجرون الی بلاد اُخریٰ و یترکون بیوتھم
    و مساکنھم و علی جناح التعجیل یرحلون۔ و اکثرھم کانوا کالمقیدین بأیدی الکفرۃ و کانت الفجرۃ کالأفاعی یصولون علی المؤمنین و یلقفون۔ فتاب المسلمون الی ربھم و طرحوا بین یدی مولاھم الکریم و کانوا فی المساجد یخرون علی المساجد و یدعون علیھم ولکشف ھذا الرجز یتضرعون۔ و قد قتل ألوف منھم بما اذّنوا و صلّوا و ذبحوا بقرۃ أو عقروا وما کان لھم حکَم لیرفعوا قضایاھم الیہ و لا کھف لیبکوا علی بابہ فکانوا فی کل وقت الی ربھم یرجعون۔ و أوذوا و عذبوا و کادت أن تزھق انفسھم و ھم یندبون و یرثون۔ و زلزلوا زلزالا شدیدًا و قُتّلوا تقتیلا
    ترجمہ: بستند۔ و در رنگ قطاع الطریق برصادران و واردان ترکتاز یہا می نمودند۔ از شدت جہل و حرمان از علم بحدی گول خرد و کژ فہم بودند کہ بہ حقیقت دل و دیدہ و گوش نداشتند۔ از اندیشہ آخرت بکلی فارغ شدہ ہمگی ہمت آنہا بستہ بہ جلب سود این جہان و چون سگان مائل بہ مردار این عالم گزران بود۔ بہر راہ می تاختند و بہر جافتنہ می انداختند۔ و ہرچہ از مال و متاع می یافتند۔ بغارت می بردند۔ قتل مسلمانان درپیش آنہا بیش از کشتن پشۂ وزن و وقعت
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 511
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 511
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    شنیعًا و بُدّدوا تبدیدًا حتی صعد الی العرش عویل الیتامی و نیاح الأرامل
    و ضجیج الضعفۃ وارتعدت الارض تحت اقدام الکفرۃ و أخذت المقربون أذیال رحمۃ اللّٰہ و ھم یشفعون۔ فلما اجتمعت أدعیۃ الضعفاء والمضطرین فی حضرۃ اللّٰہ تعالی ولحقت بھا توجھات المقربین و تواطئت الاسباب من کل جھۃ و طرف و رأی اللّٰہ تعالی أن المسلمین أصیبوا فی مالھم و انفسھم و عیالھم و اعراضھم و رحالھم و عقائدھم و اعمالھم و رأی ان المصیبۃ قد بلغت انتھاء ھا فنظر نظر التحنن والترحم الی المذنبین وادّکر قومہ الذین ھم عبادہ المنتخبون۔ الذین اذا استغفروا متندمین فیُغفرون۔ و اذا استنزلوا الرحمۃ باکین فیرحمون، و اذا استغاثوا متضرعین فینصرون۔ و اذا خروا ساجدین عند حدوث نازلۃ یسعی اللّٰہ الیھم و یؤیّدون، و اذا جاء وا
    ترجمہ: نداشت۔ کذاب و غدار و خائن و بیوفا بودند۔ ہیچ عہدے و ذمتے و حلفے و سوگندے را رعایت نمی کردند۔ آخر دریائے رحمت الٰہی در تموج آمد و ارادہ فرمود کہ جروح مسلمانان را اند مال و گردن آنہارا از طوق ستمگاران و زندان فرعونیان بے سامان نجات و مناص مرحمت فرماید و بر زیردستان و ہیچمئرزان و کس مپرسان برحمت و امتنان باز آید۔ بنا برآن قومی را کہ باقصائے زمین سکنی داشتند تحریکے و تہییجیدر دل کرد۔ آن گروہ با شکوہ بر مسکنہائے نژند
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 512
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 512
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    توّاؔ بین فیقبلون۔ و أجیبت الدعوات و سمعت التضرعات واشتد غضب اللّٰہ علی ’’الخالصۃ‘‘ و قضی بھلاکہم و ھم غافلون۔ فلما حان وقت ھلاکھم أغری اللّٰہ بینھم العداوۃ والبغضاء یقتل بعضہم بعضًا فکانوا کالسباع یفترسون اعزّتھم و یسفکون۔ و أراد کل واحد منھم ان یقطع دابر أخیہ و أسرّوا فی انفسھم استیصال شرکاءھم و قالوا لوقتلنا ھؤلاء فبعدھم انا لنحن الحاکمون۔ فسلّوا سیوفھم علی اٰباء ھم و اعمامھم
    و اخوانھم و ابناءھم فقضی الأمر فی ایام معدودات، و أذاقھم اللّٰہ ما کانوا یستباحون۔ و ھم فی تلک الایّام تفرقوا و صاروا شیعا و جعلوا یفسدون فی الارض و یقطعون الطریق و یصولون علی المسافرین کالسباع
    و بادلال الدولۃ الفانیۃ یستکبرون۔ و ما کان لھم علم لیتھذّبوا و لا قلب
    ترجمہ:و نامیمون و بر مقام نفرین التیام آنہا بیکبارگی مانند قضائے آسمان فروریخت و بافواج ظفر امواج کہ پرچم نصرت و تائیدات آسمان بر سرِ آنہا در اہتزاز بود خیام با احتشام در میدان بلدہ فیروز پور انتصاب فرمود۔ مسلمانان از قدوم میمنت لزوم آنہا در رنگ غنچہ کہ از ہبوب نسیم در انبساط آید شادمانیہا کردند و از فرط فرحت و نشاط در جامہ ہا نہ گنجیدند۔ خالصۂ ہالکہ را دست مقاومت و محاربت با آن قوم کوتاہ شدہ جبانت و نامردی بر آنہا استیلاء
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 513
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 513
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    لیفھموا و لا آذان لیسمعوا و لا اعین لیبصروا و کانوا کالوحوش البریۃ فوذرُوا الآخرۃ و ألغوھا و کانوا یقعون علی الآجلۃ کالکلب علی الجیفۃ أو یزیدون۔ فما بقی من مھجّۃ و لا شعب الا شغبوا علیھا و ما رأوا من اموال الا نھبوھا و کان سفک دماء المسلمین عندھم أخفّ من قتل بعوضۃ
    و کانوا علی قتلھم یحرصون۔ و کانوا کذابین غدارین لا یرقبون اِلَّھُم و لا یرعون حلفھم و ینقضون العھود و ینکثون الایمان ولا یتقون۔ فاراد اللّٰہ ان یأسو جروح المسلمین و یفک رقبتھم من نیر الظالمین و ینقذھم من سجن الفرعونیّین و یمن علی الذین کانوا یستضعفون۔ فدعا قومًا من أقصی الارض فنسلوا الی دُویرتھم الخریبۃ ینقصونھا من أطرافھا و جاء وا بأفواج کرارۃ مبشرۃ بنجاح و فتح و نزلوا بعراء بلدۃ اسمھا ’’فیروزبور‘‘
    ترجمہ:یافتہ و خون در ابدان خوشیدہ و عار فرار را برگزیدہ رو بہ خانہائے ویران بگریختند۔ و خدائے عظیم و حکیم در دل آنہا رعبے بزرگی انداخت و اندوہ شگرفی را در سینہ آنہا جا داد و آتش فوق العادہ را در کانون احشائے آنہا بر افروخت تا از حب زندگی بہ ہیئت مخنثان پشت بدادند۔ و بسیارے از دست جوانان آن قوم فرخندہ بخت طعمۂ نہنگ تیغ و اکثرے غرقۂ آب دریا شدند۔ و قلیلے کہ باقی ماندند با حیاتے کہ مثیل ممات و وجودے کہ ہمکنار صد ہزار نفرین بود در گوشہ ہائے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 514
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 514
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    و کاؔ ن المسلمون بِرَیّا قدومھم یفرحون۔ فما کان ’’للخالصۃ‘‘ الدّنیّۃ ان یقاوموھم أو یحاربوھم و ألقی اللّٰہ علیھم الفشل کأَنّ الدم عُصِرَ من ابدانھم فواجھوا الی بیوتھم و ھم یُھزمون۔ و ألقی اللّٰہ فی قلوبھم رعبا عجیبا و ھیج البلا بل فی صدورھم و اضرم فی احشاءھم جمرۃ حب الحیاۃ فولوا الدبر کالخناثی و ھم یبکون۔ و عاقبتھم فتیۃ قوم کان عون اللّٰہ معھم
    و سقطوا علی وجوھھم المسودۃ الدمیمۃ کالشھب فکثیر منھم قتلوا و کثیر غرقوا فی الیم و کثیر شابھوا الاموات و ھم یھربون۔ و ھربت الحواس من بطون دماغھم کأنہ خدرت اعضاء ھم کلھا او ھم مفلوجون۔ و أقرّ اللّٰہ
    ترجمہ: گمنامی خزیدند۔ مسلمانان از دیدار رایات نصرت آیات آن انصار و اعوان شاد کام و فرحان شدند۔ و خالصہ دنیّہ برنگ رگہائے خردے کہ بر سطح پوست پشہ میباشد دوختہ و پیوستہ بزمین و ہمچو شخصے کہ چنگال اجلش محکم بگیرد سراسیمہ و حیران گردیدند۔ و یقین آن داشتند کہ در این دیر و زود عین و اثر آنہا از صفحۂ ہستی محو و ناپدید بشود۔ مسلمانان چون این حال را مشاہدہ کردند دست دعا در حق قاتلان خالصہ بر افراشتند و از جذر قلب مبارکباد ہا و تہنیت ہا بر ناصران و محسنان خود عرض دادند و بصدق دل اعتراف آن کردند کہ آنہا حامیان و محسنان ما ہستند و اگر چنانچہ کفران نعمت آنہا از دست و زبان ما بہ ظہور آید در زمرۂ ظالمان و بیوفایان محسوب و معدود شویم۔ خلاصہ خدائے قادر بیخ فسقہ خالصہ برکندہ و نشانہائے آنہارا از
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 515
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 515
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    اعینؔ المسلمین برؤیۃ رایات أنصارھم و دُقّقت ’’الخالصۃ‘‘ علی وجہ الارض کالعروق الصغار المنتسجۃ علی سطح جلد البعوضۃ و تَراءَ وا کالمغشی علیہ من الموت و تیقنوا أنھم سیوبقون۔ و کان المسلمون یدعون لقاتلی ’’الخالصۃ ‘‘ قائلین جزیتم خیرًا و وقیتم ضیرًا انکم محسنونًا و ان کفرنا فانا ظالمون۔ فمحا اللّٰہ بایدیھم اسم ’’ الخالصۃ‘‘ من تحت السماء
    و استأصلھم من أرضھم و رفع مؤونتھم من خلقہ فما تری منھم من أثر کان الارض ابتلعتھم فیا للعجیبۃ ایھا الناظرون! والآن نقص علیکم قلیلا من حالات ھذا القوم الذی جعلہ اللّٰہ للمسلمین أَوَاصِرَ رحمہ و أرسلھم لنا کالناصر الحارد او المغنم البارد لیجزی المؤذین الملطّطین جزاء أعمالھم و یؤمنّ قوما
    ترجمہ: بالائے ادیم زمین محو و حک ساختہ بار وجود بے جود آنہا را از دوش خلقت بیچارہ بر انداخت و آثار آنہا را بہ نہجے مفقود و معدوم کرد کہ پنداری زمین آنہا را فرو خورد۔
    اکنون وقت آن آمد کہ نبذے از حالات این قوم فرخ قدم شرح بدہیم کہ وجود ہمایون آنہا بجہت مسلمانان نصرت الٰہیہ و غنیمت باردہ و دربارۂ موذیان حق پوش عقاب الیم و نمونہ جحیم ثابت شدہ۔ و مصلحت آن است کہ بجہت ایشان تذکرہ جداگانہ کہ از مشارکت لوث وجود خالصہ ممیز و ممتاز باشد مخصوص و مقرر بکنیم۔ مقصود ما ازین امر اکرام و تعظیم نعمت حق تعالیٰ می باشد و امید واثق داریم
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 516
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 516
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/516/mode/1up
    کاؔ نوا یخوفون۔ و إنی أری أن أذکرھم بتذکرۃ ممیزۃ علی حدۃ منزھۃ من مشارکۃ ذکر ’’الخالصۃ‘‘ اکراما لنعمۃ اللّٰہ تعالی لعل اللّٰہ یجعلنا من الذین یعظمون نعماء ہ و یشکرون۔ و لأ تّبع سبیل السیدؐ الذی سنّ الشکر للناس و قال: من لم یشکر الناس فلم یشکر اللّٰہ ‘ و نستکفی بہ الافتنان بإطراء فی مدح او اغضاء عند قدح ولا نقول الا الحق فلیشھد الشاھدون۔
    ترجمہ: او (تعالیٰ شانہٗ) ما را از زمرہ بشمارد کہ نعمت ہائے او را بدیدۂ تعظیم و تشکر می بینند۔ و ہم غرض ما ازین عمل اتباع اسوۂ حسنہ آن سید انام ( علیہ الصلوٰۃ والسلام) میباشد کہ سنت شکر را بنیاد گزاشتہ و فرمودہ آنکہ شکر انسان نہ کرد شکر خدا بجانیا ورد۔ و از خدا مسئلت می نمائم کہ او مارا محفوظ دارد ازین کہ اطرا در مدح و اغضا در وقت قدح بکنیم و حرفے جز حق و صدق بر زبان آریم۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 517
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 517
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/517/mode/1up
    ذکرؔ الدولۃ البرطانیۃ و قیصرۃ الھند
    جزاھا اللّٰہ عنا خیر الجزاء
    اعلموا أیھا الإخوان أننا قد نجونا من ایدی الظالمین فی ظل دولۃ ھذہ الملیکۃ التی نمّقْنا اسمھا فی العنوان۔ التی نضرنا فی حکومتھا کنضارۃ الأرض فی ایام التھتان۔ ھی اعزّ من الزَّبّاء بملکھا و ملکوتھا اللھم بارک لنا وجودھا و جودھا واحفظ ملکھا من مکائد الروس و مما یصنعون۔ قد رأینا منھا الاحسان الکثیر والعیش النضیر فان فرطنا فی جنبھا فقد فرطنا فی جنب اللّٰہ
    ترجمہ
    ذکر دولت عظیمہ برطانیہ و قیصرہ ہند
    َ جزاہا اللہ عنا خیر الجزاء
    برادران بر شما مخفی نماند کہ مادر عہد سعادت مہد و ظل ممدود این ملکۂ معظمہ کہ لقب مبارکش را زیب عنوان ساختیم از پنجۂ آہنین ستمگاران تیرہ درون رستگار شدیم۔ بخت ما درین زمان برکت تو امان بمثابۂ فرخندگی و بہروزی دریافتہ کہ روئے زمین
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 518
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 518
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/518/mode/1up
    و اؔ ن شر الدواب عند اللّٰہ الاشرار الذین یؤذون المحسنین و یُتْبِعون المریحین، فاللّٰہ یضع الفاس علی اشجار حیاتھم فھم یُقطعون۔ ایھا الناس اناکنا قبل عھد دولۃ ھذہ الملیکۃ المکرمۃ مخذولین مطرودین من کل طرف لا نعرف سکنا، و لا نملک مسکنا و کانت ’’الخالصۃ‘‘ یخطفون اموالنا خطفۃ الباشقِ، ثم یمرقون مروق السھم الراشق
    و ینسلون۔ و کنا کالذین فی المعامی و الموامی یُستفردون، و من لظی الغربۃ یتأججون۔ فنجانا اللّٰہ من ھذہ البلایا کلھا و اعاننا بقوم ذی الوجہ البدری واللون الدری فعادت بقدومھم أیام روحنا و ریحاننا و رأینا بھم شکل أوطاننا و إخواننا و أیدوا و نصروا و قاموا لإیطاننا فدخلنا بعد
    ترجمہ: از نزول باران متصل طراوت و نضارت می یابد۔ این ملکۂ جلیلہ جمیلہ را در ملک و ملکوتش رعیت جان نثارش از زبّاء دوست تر و عزیز تر میدارند۔ الہٰی وجود وجودش را از بہر ما مبارک بفرما و ملک وے را از مکائد روس منحوس محفوظ دار۔ آمین
    ازین سرا پردہ نشین عظمت احسان کثیر و عیش نضیر دیدہ ایم اگر از کافر نعمتے تقصیرے در ادائے حقوقش بکنیم ہما نا تفریط در حقوق حق تعالیٰ کردہ باشیم۔ بدترین آفرینش در نزد خدا آن بد کرداران می باشند کہ ایذاء و اضرار محسنان و راحت رسانان را پیش نہاد ہمت می سازند۔ عاقبت کار خدائے کریم بر درخت زندگی آنہا تبر ہلاکت میگزارد و آنہا را از بیخ برمیکند۔ برادران قبل از عہد این ملکہ مکرمہ صورت حال ما این بود کہ ازینجا دو اندہ و از آنجا راندہ بے یار و بے دیار۔ خالصہ اموال مارا ہمچو باز
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 519
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 519
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/519/mode/1up
    عمرٍؔ فی الذین یروَّحون۔ و ظھرنا برؤیۃ رایاتھم ظھور الشمس بالصباح، و تقوینا بعنایاتھم تقوی الاجسام بالارواح، و ودَّعنا بقدومھم أبا غمرۃ و أبا عمرۃ، کان قد اضرم فی احشائنا الجمرۃ، و صرنا من الذین یعیشون بأرغد عیش و بنوم الأَمنۃ ینامون۔ و اول ما لقفنا من آلاءھم و ثقفنا من نعماءھم ھو الأمن والنجاۃ من تطاول اللّیام۔ و ظلم عبدۃ الاصنام۔ فانھم آمنونا من کل خوف و جبروا بالنا و أزالوا بلبالنا فدخلنا الجنۃ بعد ما کنا من الذین ھم یعذَّبون۔ و صرنا فی ھذا العھد المبارک من ارباب البضاعۃ و اولی المکسبۃ بالصناعۃ و من الذین یتنعمون۔ و اما فی عھد ’’الخالصۃ‘‘ فکانت تجاراتنا عرضۃ للمخاطرات۔ و زروعنا
    ترجمہ: در می ربودند و چنانچہ تیر از کمان بجہد دردم از دیدہ غائب می شدند۔ و مثال ما مثال شخصے بود کہ تنہا وجریدہ در بیابان و دشت حیران و پریشان و از آتش غربت سوزان و تپان باشد۔ آفریدگار مہربان مارا ازان بلیۂ جان فرسانجات دادہ در ظل حمایت قومے ما و او ملجا مرحمت فرمودہ کہ روئے بد رسان و چہرہ روکش دُر درخشان دارند۔ از قدوم آنہا آن آب رفتہ در جوئے ما باز آمدہ و نہال پژمریدۂ ما باز بار آوردہ۔ از دستگیری و نصرت آنہا دیگر روئے اوطان مالوفہ و مساکن معہودہ دیدیم و بعد از زمانے دراز روئے امن و راحت را مشاہدہ کردیم۔ و چون را یات ظفر آیات آنہا را دیدیم از کنج ہائے خمول و خفا مثل آفتاب در صباح بر آمدیم و از عنایات ایشان مانند جسم بروح تقوی تغذی یافتیم۔ ایام قحط و موجبات
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 520
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 520
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/520/mode/1up
    طعمۃؔ للغارات، و صناعاتنا غیر فاضلۃ الأقوات۔ و مع ذالک محدودۃ الاوقات و کان انسلاکنا فی أعوان ریاستھم و عمالھم و عملتھم و حفدتھم تمھیدا للغرامات و ارھاصًا لانواع التبعۃ والعقوبات۔ و کنا کشیءٍ یقلّب فی یوم ماءۃ مرۃ ما ندری این نکون غدا أفی الاحیاء أو فی الذین یشغبون ثم یقتلون۔
    فالحمد للّٰہ الذی بدلنا من بعد خوفنا أمنا و أعطانا ملیکۃ رحیمۃ کریمۃ ما نری فی عمالھا سطوۃ المتحکمین۔ و نَضْنضۃ اللادغین العاضّین بل ھم علی الضعفاء یرحمون۔ و نحن تحت ظلھم نقتحم الأخطار،
    و نخوض الغمار لندرک الاوطار و مع ذالک کنا من الذین لا خوف علیھم و لا ھم یحزنون۔ و ان اتفق أن ترکنا البیوت عورۃ و فارقنا الدیار
    ترجمہ: گر سنگی کہ خلق را آتش در خرمن جان و ایمان زدہ بود بہ یمن این دولت فرخ رخت بربستہ و خلق اکنون بافراغ دل بخواب امن استراحت میکند۔ اول نعمتی و نخستین برکتے کہ ازین قوم مبارک نصیب حال ماشدہ دولت امن و نجات از دست بیداد فرومایگان و جفا کاران بت پرست می باشد۔ از ہمہ خوف و خطر مارا ایمن گردانیدہ و جبر شکست دلہائے ماکردہ و ہر گو نہ اندوہ و اندیشہ را از مادور ساختہ و در حقیقت از عذاب ہائے زہرہ گداز رہائی بخشیدہ بہ جنت در آوردہ اند۔ وہم درین عہد مبارک از ارباب بضاعت و بہرہ اندوزان از اکتساب و صناعت شدہ ایم وگرنہ پیش ازین در ایام خالصہ تجارت ما عرضۂ خطر و کشتہائے ما طعمۂ غارت و حاصل حرفہ و صناعت بدشواری ہرچہ تمام تر موجب سدّ رمق می بود و با این ہمہ روزے چند بیش قیام و قرار نمی گرفت۔ و اگر بفرض از ما کسے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 521
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 521
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/521/mode/1up
    فجأۃؔ ما کان ان یمسّنا من سوءٍ بل کنا فی امن من کل ّ*** و سارق کأنہ لم نَرُم و جارَنا و ظعنّا عن الفِنا و جارِنا فکیف لا نشکر ایھا الغافلون۔ انھم أعطونا حریۃ تامۃ فی اشاعۃ الدین و تالیف الکتب و اقامۃ البراھین و الوعظ و دعوۃ الخلق إلی الاسلام و فی الصوم والصلٰوۃ و الحج والزکٰوۃ و اکثر قضایا الشریعۃ إلی الشریعۃ یردّون۔ و یستفتون من علماء الاسلام فی معاملات المسلمین ولا یعتدون۔ و یفتشون عند کل حکم و قضاء و فصل و امضاء
    و لا یستعجلون۔ و اذا حضرمحاکماتھم المسلمان یرغبونھم فی شوری المسلمین و یعظونھم لیقبلوا حَکَمًا حَکَمًا من اھلھما و اذا قبلوا فیفرحون۔ و ظھرت فی ایامھم علوم الاسلام و سنن خیر الانام صلی اللّٰہ علیہ وسلم
    ترجمہ: منسلک در اعوان ریاست و عملہ و عمال و خدم گردید عرضۂ گوناگون تاوان ہا و غرامہا و مورد انواع و خامت عاقبت می شد۔ گویا نوکری تمہید و مقدمۂ ہر رنگ عقاب و وبال بود حال ما مانندی چیزے بود کہ در روزے صد بار زیر و زبر کردہ شود۔ ہرگز کسے بجزم و قطع نمی تو انست بگوید کہ فردا حالش چہ خواہدبود۔ درمیان زندہ ہا باشد یا در زمرۂ بغارت رفتہا و کشتہا جاگیرد۔ صد ہزار سپاس و ستائش مر خدائے راست کہ آن ہمہ خوف و ترس و بیم را بہ امن و امان بدل و عوض فرمودہ و برسر ما سایۂ ملکۂ کریمہ گستردہ کہ عاملانش سطوت و تحکم و تجبرندارند و نہ مثل مار کسے راگزند و آزار می رسانند۔ بلکہ بر زیر دستان ترحم مے آرند۔ امروز مارا میسرست کہ دست در ہر گونہ کارہائے سترگ و امور بزرگ در اندازیم و بجہت استحصال مقاصد و اغراض ہر صعب ناک مہمے کہ خواہیم در پیش گیریم و با این ہمہ ہیچ خوف و خطر و حزن و ملال لاحق
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 522
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 522
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/522/mode/1up
    و لا ؔ ینکرھا الا المتعصبون۔ و کم من مدارس عمروھا و اشاعوا انواع الفنون و اخرجوا کل ما کان کالمدفون۔ و رتبوا فیھا قواعد الامتحان، لیکرم الطالب اویُھان۔ ولا شک انھم احسنوا ضوابط التعلیم و أکملوا طرق التفھیم و ملکوا فی ھذا الأمر کل زندۃ متعسّرۃ الاقتداح و کل قلعۃ مستصعبۃ الافتتاح، و مع ذالک مؤونۃ ھذا التعلیم قلیلۃ و ایامھا معدودۃ و فوائدھا جلیلۃ فلیغبط الغابطون۔ ولعمری ان ھذا القوم
    ترجمہ: و عاید بحال مانشود۔ اگر چنانچہ بیک ناگاہ باید آہنگ سفر را ساز بکنیم ولذا باید خانہ ہا را بے پاس و حفظ خود مان در عقب بگزاریم ہیچ باک از دزو شب رو تیرہ درون نداریم ۔ ہیچ تفاوتے نمی باشد از این کہ پنداری در زمرۂ دوستان و برادران خویش نشستہ و از دیوار خانہ ہا برون نرفتہ ایم۔ اکنون عاقلان خود بگویند کہ با این نعمتہا چگو نہ شکر این دولت عظمی بجا نیاریم۔ مارا آزادی کلّی و اقتدار تام در جمیع امور اسلام از اشاعت دین و تالیف کتب و اقامت براہین و وعظ و دعوت خلق باسلام و روزہ و نماز و حج و زکوٰۃ مرحمت فرمودہ اند۔ اکثر قضیہ ہائے مسلمانان را کہ تعلق بہ شریعت عزائے محمدیہ (علیٰ صاحبہا السلام والتحیۃ) دارد بشریعت رومیکنند۔ و در معاملات مسلمانان استفتا از علمائے اسلام میفرمایند و از اعتدا اعراض می نمایند و در وقت امضائے حکمے و نفاذ امرے ہر گو نہ تانی و تفتیش ممکن باشد بجامی آرند و عجلت را روا نمی دارند۔ و چون دو مسلم حکومت خود را بانہا مرفوع کنند اولًا ہر نہج ترغیب و تحریص آن میدہند کہ آن ہر دو رجوع بہ شورائے مسلمانان آورند۔ و از میان خود ہا حکم برگزینند۔ و برقبول آنہا این مشورت
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 523
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 523
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/523/mode/1up
    قوؔ م أرسلہ اللّٰہ لنا و لخیرنا، أبادوا من أبادنا، و قلدوا بالنعم أجیادنا، ووجب علینا شکرھم بالقلب واللسان و ھل جزاء الاحسان الا الاحسان فلیتلقہ المسلمون بالاجلال والاعظام و یحملوا نیرطاعتھم علی کاھل المَبَرَّۃ والاکرام، و من عصاہم منا أو خرج علیہم أو حاربھم فاولئک الذین اعتدوا حدود اللّٰہ و رسولہ و أولئک ھم الجاھلون۔ و حرام علی المؤمنین تجدیفھم حتی یُغیّروا ما بأنفسھم
    و ما کان لمؤمنٍ و لا مؤمنۃ أن یعصی فی المعروف ملکا یحفظ عرضہ
    ترجمہ: و اندرز را شادمان میگردند۔ وہم در این ایام علوم اسلام و سنن حضرت خیر انام علیہ الصلوٰۃ والسلام ظہور فوق العادۃ پذیرفتہ و برین امر جز متعصبے کور باطن انکار نتواند بکند۔ بجہت اشاعت و ترویج انواع علوم و فنون مدارس اقامت کردہ و دفائن و خزائن علوم را در عالم اشتہار دادہ اند۔ و درین مدارس بجہت امتحان قواعد و ضوابط تہذیب و ترتیب فرمودہ کہ طلباء در ہنگام آزمائش مستوجب انعام و اکرام بر آیند یا مستحق ملام۔ شک نیست کہ در اتقان ضوابط تعلیم ہرگونہ دشواریہا و مشکلات را کہ خیلے متعسر و ممتنع و امی نمود تسہیل و چیزے پیش دست ساختہ اند۔ و بالائے این ہمہ مؤنت این تعلیم خیلے قلیل و ایام آن معدود و فائدہ اش جلیل می باشد۔ لا ریب این قوم را خدائے رحیم بجہت بہبود ما فرستادہ۔ آنہا دشمنان مارا ہلاک ساختہ۔ گردن مارا بہ قلادہائے نعمت و منت بستہ اند۔ چہ قدر لازم و واجب است کہ بدل و جان سپاس آنہا بجا آریم زیر اکہ جزائے احسان جز باحسان نمی باشد۔ مسلمانان را باید باجلال و اعظام آنہا را بپذیرند و غاشیۂ وطاعت آنہا بردوش انقیاد و اکرام بگیرند۔ و ہر کہ از ما عصیان ورزد یا خروج و بغی و جنگ در حق آنہا اختیار کند۔ لاریب
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 524
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 524
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/524/mode/1up
    و ماؔ لہ و یتحامی اھلہ و عیالہ و یفشی الاحسان و یذھب الاحزان
    و ینشیء الاستحسان، فخذوا الفتوی ایھا المستفتون۔ فأذنوا بحکم اللّٰہ و لا تمیلو الی جذبات النفس و لا تأذنوا بآراء العلماء الذین یفتون بغیر علم فیَضلون و یُضلون۔ اننا لقد عاینّا آلاء کثیرۃ و نعماء کبیرۃ من قیصرۃ الھند فکیف ننساھا و نکفربھا و ان اللّٰہ لا یرضی لعبادہ أن یکفروا و ھم منعمون۔ لا ریب فی ان القیصرۃ احد جناحی المسلمین
    ترجمہ: او متجاوز از حدود خدا و رسول و جاہل از سنن ہدی خواہد بود۔ مسلمانان را نا سپاسی ہرگز روا نیست تا آنہا خود ہا را از خود تغیر ندہند و ہیچ مومن و مومنہ را سزاوار نیست کہ در امور معروف داغ عصیان ملکے برجبین خود زند کہ او حافظ عرض و مال و حامیء اہل و عیال او باشد۔ و آن ملک از غایت کرم احسان ہا را دربارۂ او اظہار رنج و غمہائے او را دور میکند۔ مستفتیان باید این فتوی رابگیرند بپزیدند۔ اکنون گوش بحکم خدا بنہید۔ و برجذبات نفس پشت پا زدہ رائے آن علماء را کہ از جہل فتوی میدہند و گمراہ میشوند و میکنند بموقع قبول جامدہید۔ خدا میداند کہ ما از قیصرہ ہند نعمتہائے بزرگ و بسیار دیدہ ایم چگو نہ شود کہ نسیان و کفر ان آنہا روا داریم زیرا کہ حق تعالیٰ ہرگز راضی نمی شود کہ بندگانش راہ کفر ان را بگیرند۔
    فی الحقیقت قیصرہ ہند یک جناح مسلمانان و حافظۂ اسلام و محسنۂ آنہا می باشد۔ وجودش برائے ما برکتے وجودش بجہت ما ابر کرم است۔ او ہرگز رضا باذیت ما نہ دادہ و خداوند بزرگش از ظلم و ستم و تغافل محفوظ داشتہ۔ گروہ ہائی مختلف و قومہائے گوناگون در زیر دامان و سیعش ماوا و ملاذ دارند و ہریک بعنایت خاصش مباہات می نمایند۔
    این افساد و تطاول قسیسان کہ شیوع دارد و از ہر جانب سموم دم مسموم آنہا می وزد۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 525
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 525
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/525/mode/1up
    و حاؔ فظۃ آثار الاسلام و من الذین ھم یحسنون۔ وجودھا لنا برکۃ وجودھا لنا مُزْنۃ لیست علی اذیتنا براضیۃ، و قد عصمھا اللّٰہ من ظلم و تغاضٍی۔آوت اقوامًا متفرقۃ فی ذیل فضفاض کل حزب بعنایتھا فرحون۔ و اما فساد قسیسین و تطاولھم و ھبوب سمومھم، و شیوع ضلالات الفلاسفۃ و انتشار علومھم، فلیس فیھا دخل ھذہ الملیکۃ مثقال ذرۃ و ھذہ الدولۃ بریۃ من الظن بحمایتھا بل ھذہ نتائج حریۃ قد أُعطی لکل قوم نصیب تام منھا ‘ و ما اعطی قانون القیصرۃ حقا زائدا للقسیسین علی المسلمین، بل سواھما فی ذالک فلم یرتاب المرتابون و من فھم ان القسیسین شعبۃ من شعب ھذہ الدولۃ و انہم یعظون بأمرا القیصرۃ فقد ضل ضلالا بعیدًا و صار من الذین یظلمون۔
    ترجمہ: و ضلالت و غوایت فلسفیان کہ عالم را تیرہ و تار گردانیدہ و علوم ناپاک آنہا شہرت تمام یافتہ است ملکۂ معظمہ ہیچ تعلق و دخل باین امور ندارد و ساحت این دولت از ظن حمایت آنہا بکلی مبرا می باشد۔ بلے این ہا ہمہ از نتائج آن آزادی ناشی و فاشی شدہ کہ ہر قومے را از آن بہرۂ وافر بخشیدہ اند۔ اسقفان ہیچ حقے زاید برمسلمانان ندارند بلکہ درین باب ہر دو گروہ مساوی می باشند۔ و ہر کہ گمان دارد کہ اسقفان شعبۂ از شعبہائے این دولت می باشند و وعظ و تبلیغ برحث و تائید قیصرہ می نمایند او خیلے غلط کار و ستمگار باشد۔ ہرگز نمی شود کہ قیصرۂ ہند اہل اسلام را از اشاعت اسلام منع و زجر می فرماید۔ چنانچہ پر ظاہرست کہ قومے از متمذہبانش در قرب دار دولت او کلمۂ طیبہ اسلام رابجان پذیرفتہ و تاسیس و تعمیر مساجد نمودہ اند۔ خلاصہ عنایات وا لطافش مخصوص بقومے خاصے نیست۔ و این
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 526
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 526
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/526/mode/1up
    اتمنعؔ القیصرۃ من اشاعۃ دین الاسلام و کأَیّن من قومھا و من نواح دار دولتھا أسلموا وأسَّس المساجد فیھا وعمرت فما لکم لا تفھمون۔
    و عنایاتھا لیست مختصۃ بقوم دون قوم، ذلک ظن الذین یقنعون علی خیالات سطحیۃ و ھم عن حقیقۃ الامر غافلون۔ انظروا الی آثار فیضھا کیف اقامت فی کل بلدۃ أندیۃ الافادۃ فمنھا أندیۃ الادب و منھا أندیۃ سیاسۃ المدن و وشحتھا بشوری الحکماء و العقلاء و أجرت من العلوم انھارًا۔ و فتحت للطلباء مدارس و ھمّنت لفقراء ھم درھما
    و دینارًا، و أعانتھم ادرارًا، و طالما داومت علی ذلک فاشکروا لھا ایھا المسلمون، وادعوا اللّٰہ ان یدیم عزّ ھذہ الملیکۃ الکریمۃ و ینصرھا علی الروس المنحوس و یدخلھا فی الذین آمنوا باللّٰہ و رسولہ
    ترجمہ: گمان بد درسر آنہا جامیگیرد کہ قانع بر خیالات سطحیہ و از فقدان ملکۂ غور و فکر غافل از حقیقت امر می باشند۔ نظر بر اثبات این مدعا می توانیم آن آثار فیوضش را گواہ بیاریم کہ از وفور کرم در ہر بلدہ مجلسہائے افادات برپا فرمودہ است کہ از جملہ آن مجلس اشاعت و ترویج ادب و مجلس سیاست مدن و ہمچنین مجالس دیگر میباشد۔ این ہمہ مجالس امورش باتفاق رائے و شورائے عقلاء و حکماء قطع و فصل می باید۔
    فرخندہ مادر مہربانی کہ دریا ہائے علوم را روان ساختہ و درسگاہ ہا بجہت طلباء مفتوح فرمودہ۔ تہیدستان و بیزار ان را از قبل دولت اورا ر و موظفات و اعانہ مرحمت میفرماید۔ اے مسلمانان برخیزید و شکر این عطیات را بجا بیارید و از خدا مسئلت بنمائید کہ این ملکۂ کریمہ را بقائے دوام و بر روس منحوس نصرت و ظفر بہ بخشد۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 527
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 527
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/527/mode/1up
    و ؔ یعطیھا خیر الکونین و یجعلہا من الذین أوتوا حظ الدارین و یسعدون۔
    یا قیصرۃ الھند وُقیتِ التَّلَفَ و أُنیست کل رُزء سلَف، قد بذلت فی اقامۃ الامن جھد المستطیع و وسعت الحریۃ غایۃ التوسیع و نجیت المسلمین من ھموم ناصبۃ، و أخرجت لھم اصداف درر ناضبۃ و رأینا منک راحۃ القلوب و قرۃ الاعین و تودیع الکروب فواھًا لک لو کنت من الذین یسلمون۔ جزاک اللّٰہ عنا خیر الجزاء۔
    و اعطاک ما فی قلبک من التمنا ۱؂۔ لا ینسی نعماء ک ذریۃ المسلمین، و لا یمحی
    ترجمہ: و او را در جماعہ کہ بخدا و رسول وے ایمان آوردہ اند۔ داخل و در عطائے خیر کونین وحظ دارین شامل سازد۔
    اے قیصرہ ہند (خدا از تلف محفوظت دارد و ہر رنج گزشتہ از دلت فراموش بشود) ہر قدر استطاعت و جہد و سعی ممکن بود در اقامت امن و توسیع آزادی و فراغ بال مبذول فرمودی۔ و مسلمانان را از اندوہ و رنج جان فرسا نجات بخشیدہ دامن دامن در ہائے مقصود بر اوشان نثار کر دی۔ بخدا کہ از لطف تو راحت قلوب و قرت اعین نصیب ماشدہ۔ اے فرخا حال نیکو مآل تو اگر لباس پاکیزۂ اسلام را در برمیداشتی۔ حق تعالیٰ از ماجزائے خیرت د ہد و ہمہ متنمیات دل ترا بر آرد۔ اولاد مسلمانان احسانہائے ترا ابدا فراموش نہ کنند۔ و نام ہمایونت از دفتر اہل فرقان تا قیامت محو نشود۔ اے خوشا حال تو۔ تو بر قومے نظر احسان و امتنان مبذول فرمودی کہ ذلیل و خوار گردیدہ بود۔ این زمان و زمانیان منقطع شوند ولے مآثر جمیلہ ات ابدالدہر روئے انقطاع نخواہد دید۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 528
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 528
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/528/mode/1up
    اسمکؔ عن دفاتر الفرقانیین۔ ینقطع الزمان و لا ینقطع ذکر مآثرک، فطوبی لک ایتھا المحسنۃ الی الذین کانوا یُقمعون۔ أیتھا الملیکۃ المکرمۃ انی فکرت فی نفسی فی کمالاتک فوجدتک انک حاذقۃ یمرّ رایک فی شعاب المعضلات مر السحاب، و تزف مدارکک فی الغامضات کزف العقاب، و لک ید طولی فی استنباط الدقائق و مآثر غراء فی تفتیش الحقائق، و أنت بفضل اللّٰہ من الذین یصیبون فی استقراء المسالک و لا یخطون۔ انت یا ملیکۃ تستشفین کل
    ترجمہ: اے ملیکۂ مکرمہ چون باخود در کمالات عجیبہ ات در اندیشہ رفتم دیدم کہ رائے رزین و فکر متین تو از کمال جودت و حذاقت در شعاب امور مشکلہ و غامضہ از سیر ابرو پرواز عقاب سریع تر می رسد و فہمیدم کہ در استنباط دقائق ید طولی و در تفتیش حقائق مآثر غرّا میداری۔ و دریافتم کہ از فضل خدا در استقرائے مسالک رائے تو پیوستہ بر صواب و مصؤن از خطا می باشد۔ بافکر دقیق و ذہن رسا ہر گونہ جوہر برگزیدہ و نکات معدلت و نصفت استنباط و استخراج میکنی۔ چنانچہ ازین بابت ترا مآثرے کہ مذاق شیرین و سیاق نمکین دارد و بر صفحات زمانہ مثبت میباشد و ستود ہا و برگزیدہانیز در ثنائے تو رطب اللسان ہستند۔ اکنون بعد از آنکہ کمالات و صفات ترا کہ مشام چار دانگ عالم را معطر دارد بخاطر آور دم در دلم ریختند کہ ترا از امرے باخبر بسازم کہ در نزد خدا از آن رفعت و قدر تو بلند و زیاد گردد۔ و خدا آگاہ است کہ از جوش دلش مذکور میکنم زیرا کہ اخلاص و حب قلبی مرا برآن می آرد کہ بہرچہ در آن فلاح و صلاح تو مرکوز باشد ترا دعوت بکنم ولو ازم شکرت نمی خواہم انعامی آن بنمایم و ہمہ اعمال بستہ بہ نیات می باشد و مخلص از صدق نیت شناختہ گردد۔ ہرگز ہیچ مخلصے را
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 529
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 529
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/529/mode/1up
    جوؔ ھر نقی و تستنبطین دقائق المعدلۃ بفکر دقیق و ذھن ذکی و ان لک فی ھذہ اللیاقۃ مآثر حلوّ المذاقۃ ملیح السیاقۃ و یحمدک المحمودون۔ فالآن قد اُلقی فی بالی بعد تصور کمالاتک و حسن صفاتک التی تضوعت ریحھا فی العالم ان أخبرک من أمر عظیم، لیرتفع بہ قدرک عند رب کریم۔ وما اذکرہ الّا بفورۃ إخلاصی لان اخلاصی قد اقتضی ان ادعوک الی خیرک ولا أُلغی لوازم شکرک و
    ترجمہ: سزاوار نیست کہ امرِ خیر را از محسن خود پنہان دارد بلکہ برا و واجب است کہ متاع خودرا بر او عرض بدہد۔ اے ملکۂ کریمۂ عظیمہ من خیلے در شگفت فروماندہ ام کہ با این کمال فضل و علم و فراست از قبول اسلام ابا میداری و چنانچہ در امور عظام امعان و غور را کار میفرمائی در اسلام نگاہے نمی اندازی۔ عجب است کہ در شب تیرہ و تار چیزے را باز می بینی ولے اکنون کہ آفتاب باہمہ تجلی و وضاحت بر آمدہ آنرا در نمی یابی۔ یقین بدان کہ دین اسلام مجمع انوار و منبع بحار است و ہر دین حقے شعبۂ ازآن میباشد۔ ہر کہ خواہد بیازماید۔ فی الحقیقت این دین دین زندہ و مجمع برکات و مظہر آیات است۔ امر بہ طیبات و نہی از خبیثات میکند۔ ہر کہ خلاف آن بگوید و اظہار دہدا و لاریب دروغ زن و مفتری باشد۔ و از مفتریان پناہ بخدا میجوئم۔ از آنجا کہ آنہا حق را پوشیدہ و با باطل دوستی ورزیدہ اند خدائے حکیم آنہا را مورد نفرین گردانیدہ و نور فطرت را از سینۂ آنہا برون کشیدہ است چنانچہ حظّ خود را ازان نور فراموشیدہ بہ ساختہا و تعصبات خویش شادمانی میکنند۔
    اے ملکہ این قرآن کریم خاصیتے دارد کہ سینہ را پاک و صاف و از نور پُر میفرماید۔ و
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 530
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 530
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/530/mode/1up
    انماؔ الاعمال بالنیات و بصدق النیۃ یعرف المخلصون۔ و ما کان لمخلص ان یستشعر أمرا فیہ خیر محسنہ بل یستعرض متاعہ لہ ولا یکون من الذین یکتمون۔ أیتھا الملیکۃ الکریمۃ الجلیلۃ أعجبنی انک مع کمال فضلک و علمک و فراستک تنکرین لدین الاسلام، و لا تُمعنین فیہ بعیون التی تمعنین بھا فی الأمورالعظام۔ قد رایت فی لیلٍ دجی، والآن لاحت الشمس فما لک لا ترین فی الضحٰی، ایتھا الجلیلۃ اعلمی ایدک اللّٰہ
    ترجمہ: پیروان را از انوار انبیاء (علیہم السلام) بہرہ مند و مہبط سرور روحانی می نماید۔ بلے این انوار نصیب آنہا می باشد کہ فساد و کبر و بلندی را دوست ندارند و از تمام اخلاص و صمیم دل رو بقبول انوارش آرند۔ البتہ امثال این مردم کشاد دیدہ و زکوٰۃ نفس با مرحمت می کنند۔
    من از منت و فضل خداوند (عزّ اسمہ) بہرۂ وافر و حظے متکاثر از انوار قرآن میدارم۔ دل مرا از آن نور منور و از ہدایت و اصلانہ بہر در ساختہ اند۔ از انعام جلیل خدا برمن آنست کہ او مرا با آیات بینہ بجہت آن فرستادہ کہ ہمہ خلق را بسوئے دین حق الٰہی دعوت کنم۔ فرخندہ بختے کہ مرا بپزیرد و موت را بخاطر در آردیا نشانے بخواہد و بعد از دیدنش بمن گردد۔
    اے ملیکۂ کریمہ از نعمائے دنیویہ ترا نصیبے بسیار دادہ اند۔ باید اکنون رغبت بملک آخرت بکنی و سر نیاز بدرگاہ پروردگار یگانۂ فرود آری کہ ذاتش از گرفتن پسرے و ملکش از مشارکت شریکے بری و غنی است۔ آن رب وحید را از دل برون کردہ۔ ہمچو معبودان را اختیار می نمائید کہ چیزے را نیا فریدہ اندوخود شان آفریدہ شدہ اند؟
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 531
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 531
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/531/mode/1up
    أن ؔ دین الاسلام مجمع الانوار، و منبع الانھار و حدیقۃ الأثمار و ما من دین الا ھو شعبتہ فانظری الی حبرہ و سبرہ و جنتہ و کونی من الذین یُرزقون منہ رزقًا رغدًا و یرتعون۔ و ان ھذا الدین حی مجمع البرکات و مظھر الآیات یامر بالطیبات و ینہٰی عن الخبیثات و من قال خلاف ذالک أو أبان فقد مان، ونعوذ باللّٰہ من الذین یفترون۔ فبما اخفاء ھم الحق و إیواء ھم الباطل لعنہم اللّٰہ و نزع من صدورھم انوار الفطرۃ فنسوا حظھم منہا فرحوا بالتعصبات و ما یصنعون۔ أیتھا الملیکۃ ان ھذا القرآن یطھّر الصدور و یلقی فیھا النور و یری الحبور الروحانی و السرور من تبعہ فسیجد نورا وجدہ النبیون و لا یلقی انوارہ الا الذین لا یریدون علوًّا فی الارض و لا فساد و یاتونہ
    ترجمہ: و اگر از اسلام شکے در دلت باشد من بحول و قوّت خدا آمادہ ہستم کہ آیات صدقش بنمایم۔ خدا بہرحال بامن است۔ دعاہائے مرامی شنود و ندائے مرا پاسخ می گزارد۔ و چون از وے نصرت و عون بخواہم دست من میگیرد۔ من بہ یقین میدانم کہ او در ہر موطن و میدان مرا مدد فرماید و مرا صنائع نسازد۔ آیامی شود کہ ترا از خوف روز قیامت رغبت و میل بدیدن نشانہائے صدق من در دل پدید آید۔
    اے قیصرہ توبہ بکن۔ توبہ بکن۔ و بشنو بشنو۔ خدا در ہمہ چیز ہائے تو و مال تو برکت بخشد۔ و بر تو رحمت و بخشائش نازل فرماید۔ و اگر بعد از امتحان کذب و دروغ من پیدا شود تن برآن در میدہم کہ مرابکشند و بردار بکشند یا دست و پائے مرا از ہم ببرند۔ و اگر صادق بر آیم مردے دیگر آرزو ندارم جز این کہ رجوع انابت بآفرید گارخود آوری کہ ترا پروردہ و نواختہ و ہمۂ مسؤلات ترا بتو مکر مت کردہ۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 532
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 532
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/532/mode/1up
    راغباؔ فی أنوارہ فاولئک الذین تفتح أعینھم و تزکی انفسھم فاذا ھم مبصرون۔ و إنی بفضل اللّٰہ من الذین اعطاھم اللّٰہ من انوار الفرقان
    و اصابھم من اتم حظوظ القرآن، فانار قلبی ووجدت نفسی ھداھا کما یجد الواصلون۔ ثم بعد ذالک ارسلنی ربی لدعوۃ الخلق
    و آتانی من آیات بینۃ لأدعو خلقہ الی دینہ فطوبی للذین یقبلوننی
    و یذکرون الموت او یطلبون الآیات و بعد رؤیتھا یؤمنون۔ ایتھا الملیکۃ الکریمۃ قد کان علیک فضل اللّٰہ فی آلاء الدنیا فضلا کبیرا فارغبی الآن فی ملک الآخرۃ و توبی واقنتی لرب وحید لم یتخذ
    ولدا و لم یکن لہ شریک فی الملک و کَبّریہ تکبیرا۔ أ تتخذون
    ترجمہ: اے مالکۂ ممالک عظیمہ و قیصرہ ہند آواز مرا بشنو و از ذکر حق دل تنگ مباش۔ اے قیصرۂ کریمۂ جلیلہ حق تعالیٰ اندوہ ہا را از تو دور سازد و ترا و جگر پارۂ ترا زندگی دراز بخشد و از شر حاسدان و دشمنان ترا در پناہ خویش دارد۔ این ہمہ از محض ترحم و اشفاق برحال و مآل تو تسطیر کردہ ام۔ و بجہت تو از خدا برکت روز و شب و برکت دولت ونصرت و ظفر مسئلت می نمایم۔
    اے ملکہ دولت اسلام را بپذیر سلامت بمانی۔ مسلمان بشو کہ تا بروز پسین تمتع بردار و از شر اشرار رستگار شوی۔
    اے ملکۂ کریمہ مرا خدائے بزرگ از دنیا شاغل و بآخرت مائل فرمودہ است۔ ازین دنیا جز دو نان خشکے و کوزہ آبے نمی خواہم۔ ہمہ آز و ہوا و ہوس از دلم بکلی برون شدہ۔ آرزوئے جاہ و منزلت و رتبت و زینت دنیا نمیدارم و تمنائے لحوق بہ جماعۂ دارم کہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 533
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 533
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/533/mode/1up
    من ؔ دونہ آلھۃ لا یخلُقون شیئا و ھم یخلقون۔ و إن کنت فی شک من الاسلام فھا انا قائم لاراء ۃ آیات صدقہ و ھو معی فی کل حالی اذا دعوتہ یجیبنی، و اذا نادیتہ یلبینی، و اذا استعنتہ ینصرنی، و انا اعلم انہ فی کل موطن یعیننی و لا یضیعنی۔ فھل لک رغبۃ فی رؤیۃ آیاتی و عیان صدقی و سدادی، خوفا من یوم التنادی۔ یا قیصرۃ تو بی توبی واسمعی اسمعی بارک اللّٰہ فی مالک و کُلِّ مالک و کنت من الذین یرحمون۔ فان ظھر کذبی عندالامتحان فواللّٰہ انی راضٍ ان اُقتل او اُصلب او تُقطع أیدی و أرجلی، والحق بالذین یذبحون۔ و ان ظھر صدقی فما اسئل اجرًا منک الا رجوعک الی الذی خلقک و ربّاک و اعزک
    ترجمہ: در جنت بجہت آنہا سریرہا بیارایند و از نعمائے جنت آنہا را روزی بدہند و در بُستانہائے قدس تنزّہ و تفرج نمایند۔
    اے ملیکۂ کریمہ من مسلمانے می باشم کہ بہرۂ تمام عرفان مرا مکرمت فرمودہ اند۔ ملکوت آسمانہا را در چشم من جلوہ دادند و حبّ و انس بآن در دلم ریختند۔ و ملک دنیا را برمن عرض کردند و ہمہ علایق دل مرا زان گسیختند۔ امروز دنیا و حیات دنیا و مال و دولت وے را در دیدۂ من بیش از مردارے مرتبتے و وقعتے نیست۔
    اے قیصرۂ محترمہ آنچہ انجامکار و اہم جمیع امور میخواہم نصحاً در خدمت بہ تقدیم رسانم آنست کہ مسلمانان عضد خاص سلطنت و جناح دولت تو می باشند۔ و نیز آنہا را در ملک تو خصوصیتے ممتازے و جلیلے است کہ از نظر دور بینت پوشیدہ نیست۔ باید در آنہا مخصوصا بہ نظر مرحمت و شفقت و لطف فوق العادۃ نگاہے بکنی و راحت و
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 534
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 534
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/534/mode/1up
    و ؔ آتاک کل ما سألت فاسمعی دعوتی یا ملیکۃ الممالکۃ العظیمۃ وقیصرۃ الھند و لا تکونی من الذین یشمئز قلوبہم عند ذکر الحق
    و یعرضون۔ ایتھا القیصرۃ الکریمۃ الجلیلۃ اذھب اللّٰہ احزانک و أطال عمرک و عمر فلذکبدک و عافاک و حفظک من شرالاعداء والحسداء انی کتبت ھذہ الوصایا خالصًا للّٰہ رحما علیک و علی عقباک وأدعولک برکات اللیل و برکات النھار و برکات الدولۃ
    و برکات المضمار۔ یا ملیکۃ الارض اسلمی تسلمین اسلمی متعک اللّٰہ الی یوم التنادی، و سلمت و حُفظت من الأعادی، و یحفظک من اللّٰہ الحافظون۔ أیتھا الملیکۃ الکریمۃ أنا امرء جذبہ اللّٰہ تعالی من الدنیا الی الآخرۃ و ما أسئلہ من ھذہ الدنیا الا رغیفین و کوزۃ ماءٍ و صرف
    ترجمہ: آرام و تالیف قلوب آنہا را نصب عین ہمت خود سازی۔ و بسیارے را از آنہا برمنازل عالیہ و مدارج قرب مشرف و سرفراز بفرمائی۔
    آنچہ من می بینم تفضیل و تخصیص و ترجیح آنہا بر جمیع اقوام از لوازمات و منبع مصالح و برکات است۔ خدا را دل مسلمان راخوش و کشت امید آنہارا سرسبز بکن زیرا کہ حق تعالیٰ ترا نزول اجلال در زمین آنہا مرحمت فرمودہ و مالک ملکے گردانیدہ کہ مسلمانان قریب بہزار سال عنان امر و نہیش در دست داشتہ اند سپاس این نعمت بجا آرد آنہا را درکنار عاطفت و تصدق پرورش بکن۔ خدائے کریم ہم متصدقان را دوست می دارد۔ ملک ہمہ مرخدا راست ہر کرا خواہد بدہد و از ہر کہ خواہد انتزاع بکند۔ او را سنت است کہ ایام شکر گذاران را درازی می بخشد۔
    اے ملکۂ مکرمہ من براستی و صدق بیان میکنم کہ ہمہ مسلمانان ہند از تہ دل مطیع و منقاد تو
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 535
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 535
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/535/mode/1up
    قلبیؔ من اھواءٍ لا ارید علوًّا و لا مزیۃ فی الدنیا و لا زینتھا و ارید ان اکون بالذین یُبسط لھم سُرُر فی الجنۃ و من نعماءھا یرزقون، و فی ریاض حظیرۃ القدس یرتعون۔ ایتھا الملیکۃ انا احد من المسلمین رزقنی اللّٰہ عرفانہ
    و اعطانی نورہ و ضیاء ہ و لمعانہ، و اظھر علیّ ملکوت السمٰوات و حَبَّبَھا الی بالی و ارانی ملک الارض و کرّھہ الی قلبی و صرف عنہ خیالی، فالیوم ھو فی اعینی کجیفۃ او أَنْتَن منھا و کذا کل زینۃ الحیٰوۃ الدنیا والمال والبنون۔ و فی آخر کلامی انصح لک یا قیصرۃ خالصًا للّٰہ
    و ھو ان المسلمین عضدک الخاص و لھم فی ملکک خصوصیۃ تفھمینھا فانظری الی المسلمین بنظر خاص و أقرِّی اعینہم و ألّفی بین قلوبھم واجعلی اکثرھم من الذین یقرّبون التفضیل التفضیل۔ التخصیص التخصیص و فی ھذہ برکات ومصالح۔ أَرضیہم فانک وردتِ
    ترجمہ : می باشند۔ و ہرگز بوئے فسادے از آنہا استشمام و آتش عناد در آنہا مشاہدہ نمی کنم۔ و می بینم کہ آنہا بجملگی پیادۂ و سوارۂ تو میباشند و ہموارہ آمادہ و مستعد ہستند کہ شرائط جان نثاری و لوازم انقیاد را بمنصۂ ظہور بیارند و درین امر ہر گو نہ مصائب و مشاق کوہ و دشت را تحمل بکنند۔ نے نے آنہا در معارک مرد آزما و مصاف جان فرسا اول و اقدام خادمان و جان بازان و در مواضع فصل و امضا چابکترین جوارح و اعضائے تو ہستند۔ اشارتت را حکم نافذ و طاعتت را غنیمت باردہ می دانند۔ زنہار زنہار در ہیچ باب از آنہا عذرے و عذرے سر برنزند۔ اے قیصرۂ ہند این قوم وقتے صاحب شان و مالک تخت و تاج و ازمۂ زمان بودہ اند۔ این پرستاران اصنام باشارۂ عصائے شوکت آنہا مانند رمہ بر آواز شبان میرفتند۔ از قضا روزگار از آنہا برگشت و از
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 536
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 536
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/536/mode/1up
    أرؔ ضہم و داریھم فانک نزلت بدارھم و آتاک اللّٰہ ملکہم الذی أمروا فیہ قریبًا من ألف سنۃ مما تعدون۔ فاشکری ربک و تصدقی علیھم فان اللّٰہ یحب الذین یتصدقون۔ الملک للّٰہ یؤتی من یشاء و ینزع ممن یشاء
    و یطیل ایام الذین یشکرون۔ ایتھا الملیکۃ المکرمۃ لا شک أن قلوب مسلمی الھند معک و لا استنشق منھم ریح الفساد وما أری فیھم نار العناد و انّھم رجلک و خیلک المستعدون لفداء النفس و اداء شرائط الانقیاد والحاملون لک جمیع شدائد القُنن والوِھاد بل ھم اول خدمک فی مواطن الاقدام والانبراء۔ و جوارحک فی مواضع الفصل والامضاء اشارتک لھم حکم، وطاعتک لھم غنم۔ لن تری منھم غدرًا و لا عذرا ولکنھم یا قیصرۃ الھند قومٌ کان لھم شان۔ وکانت فیھم سرر و تیجان، وکانوا یحکمون علی عبدۃ الصنم کالرعاۃ علی الغنم، فَقُلِّب أیامھم
    ترجمہ: بد انجام ئ ناکرد نیہا اسیر پنجۂ جور و جفائے خالصہ گشتند۔ و از زمانے در از سایۂ ہما پایہ ات راچون روزہ دارے از پئے ہلال عید و برنگ زن آبستن بجہت زادن فرزند سعید چشم در راہ و بیتاب می بودند۔ بساست کہ یاد ایام گذشتہ کہ حلہ ہائے سلطنت در برداشتند ایشان را نعل در آتش میکند زیرا کہ قلع عادات از محالات می باشد۔ خدا برنہان من آگاہ و گواہ است کہ این قدر کہ عرض خدمت شریفہ ات کردہ ام ناشی از نصح و خیر طلبی بودہ است۔ و سو گند بخدا یاد میکنم کہ ہمہ خیر و مصلحت منطوی درین می باشد کہ اکرام و اعزاز ایشان بایشان باز بدہی و از عطائے بعضے مناصب و مدارج ایشان را امتیاز و افتخار بہ بخشی۔ و ہرگز مصلحت درین نیست کہ برنگ مار و مور ضعیف
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 537
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 537
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/537/mode/1up
    منؔ سوء أعمالھم و ظُلموا من أیدی ’’الخالصۃ ‘‘ و إخوانھم و کانوا یستشرفون وقت حکومتک کاستشراف الصائمین ھلال العید، و یرقبون عنایتک رقبۃ الحبلی ولادۃ الابن السعید۔ و کانوا بقدومک یستفتحون۔ و قد مضت علیھم ایام کانوا فی حُللِ إمارات و بعصیّ اختیارات فیلوعھم فی بعض الاوقات ادّکار ھذہ الدرجات، فان قلع العادات من المشکلات۔ و ما قلت لک الا نصحًا و انما الاعمال بالنیات۔ و واللّٰہ ان الخیر کلہ فی اکرامھم و ردِّ عزتھم الیھم ببعض المناصب
    و العطیات، و ما أری خیرًا فی حیل استیصالھم و قتلھم کالحیات، و ما کان لنفس ان تموت او تنفی من الارض الا بحکم رب السمٰوات۔ فأشفقی علیھم ایتھا الملیکۃ الکریمۃ المشفقۃ احسن اللّٰہ الیک وا عفی عنی ان رایت مرارۃ قولی فان الحق لا یخلو من المرارۃ والعفو من کرام الناس
    ترجمہ: و خوارداشتہ و از جا بردہ شوند۔ و در حقیقت نمی شود کہ نفسے از نفوس جز حکم خدا بمیرد یا از ملک اخراج کردہ شود۔ بر این ضعیفان رحمے بفرما و اگر در قول من تلخی رفتہ باشد عفو و درگذر بکن زیرا کہ حق پیوستہ مخلوط بہ مرارت می باشد و بزرگان از زلّات اغماض می کردہ اند۔ می بینم کار مسلمانان بجائے رسیدہ است کہ از شدت فقر و بیچارگی در ملک امرا جز خشت و سنگ نماندہ۔ سر ہا از عمامہ و دستار برہنہ شدہ و از اثاثتہ البیت بجہت رہن جزکوزہ سفالین در دست ندارند۔ وقتے از اوقات بود کہ خدم و حشم و متاع و قماش داشتند و امروز جز دست و پائے آنہا خادم آنہا نمی باشد۔ از دست گردش روزگار و روز افزونی صعوبات و انسداد راہ ہائے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 538
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 538
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/538/mode/1up
    مأؔ مول۔ إنی أری المسلمین قد مسّھم البؤس والافتقار و ما بقی فی بیوت ذریۃ الامراء الا اللَّبن والأحجار۔ سقطت العمائم عن الرؤوس، و ما بقی للرھن غیر الاباریق والکؤس۔ کانوا فی وقت ذوی حواشٍ و غواشٍ
    و متاع و قماش والیوم لا اری حفدتھم الا جوارحھم و أراھم من تقلب الایام کالسکاری وما ھم بسکاری، ولکن غشیھم من الغم ما یغشی الناس عند ازدیاد الاعتیاص و انسداد طرق المناص۔ و انی أری أنک کریمۃ جلیلۃ و مثلک لا یوجد فی الملوک۔ و قد وھبک اللّٰہ حُزامۃً وانبعاثًا۔ تواسین رعایاک بالتعب الشدید و لا تطیعین راحۃ الا حثاثا،
    و تستغرقین اوقاتک فی تفقد الرعایا و فکر مصالحھم و تختارین النصب لعل الخلق یستریحون۔ و ظنی انک قد قلت لنائبیک فی الھند ان یفضّلوا شرفاء المسلمین علی غیرھم، و ینظروا الیھم باعزازٍ خاصٍ
    ترجمہ: نجات سراسیمہ واردست و پاگم کردہ اند۔ و می بینم در ذات تو کرم و رحم را سرشتہ اند و ہرگز نظیر تو در پادشاہان موجود نمی باشد۔ از حزم و بیداری حظے کامل ترا بخشیدہ اند۔ مواسات و مدارات رعایا را بر آرام جان اختیار و از حظ نفس قدرے قلیلے بہرہ میگیری۔ و بجہت اینکہ رعیت با خواب امن و راحت بخسپند ہر قدر رنج و زحمت ممکن باشد جان خود رامیدہی۔ درتفقد حال بیچارگان و فکر مصالح ناتوان اوقات عزیزت را مصروف میداری۔ و یقین من است کہ از پیشگاہت این نواب و عمال را کہ زمام اختیار امور ہندوستان در دست دارند تاکید بلیغے رفتہ کہ بہرحال مسلمانان رابمزیت خاص و فضیلت با اختصاص بر دیگران شرف و امتیاز بہ بخشند۔ ولے این نواب زاغ را باعقاب
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 539
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 539
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/539/mode/1up
    و ؔ یقربوھم بخصوصیۃ ولکن النائبین سوّوا الامر و ما رعوا مصلحۃ اعزاز المسلمین حق رعایتھا بل ما خطر ببالھم أن ینظروا الی أطمارھم و یسعفون۔ ھذا ما قلت شیئا من حال مسلمی الھند و أما عبدۃ الاصنام الذین یقولون اننا ’’ھندو‘‘ و ’’آریۃ‘‘ فھم قوم أنفدوا أعمارھم کالعبید والحفدۃ و مرت علیہم قرون کمجھول لا یعرف أو نکرۃ لا تتعرف۔ و تعرفین ایتھا الملیکۃ الجلیلۃ انھم مسلوبۃ الطاقات و مطرودۃ الفلوات من دھر طویل۔ جلودھم قد وسمت، وجنودھم قد حسمت، و زمام نفوسھم قد ضفر۔ و ظھر عزمھم قد کسر۔ فیمشون الی ما سیقوا و لا یعتذرون، و لا یریدون عزۃ و فی قلوبھم جبن الغلمۃ فھم لا یبسلون۔ والسر فی ذالک انھم من حقب متلاحقۃ مطیۃ خدمۃ لا اھل حکومۃ و معتاد فقر و مسألۃ لا من أھل عزۃ
    ترجمہ: و سہارا با آفتاب بریک پایہ فرود آوردہ ہرچہ باید در استمالت قلوب و اعزاز خاص مسلمانان التفات نکردہ اند۔ این است آنچہ شمۂ از حال مسلمانان میخواستم عرض بدہم۔ آن گروہ ہائے دیگر کہ آریہ یا ہندو میباشند ہرگز صلاحیت آن نداشتہ اند کہ بجہت احوال مسلمانان مقیاس و میزان توانند بشوند باین معنے کہ از زمانہائے دراز در رنگ حلقہ بگوشان و خادمان بسرمی بردہ و از قرون کثیرہ مجہول و متواری در کنج خمول بودہ اند۔ و بمثابۂ جبان و بے زہرہ و مسلوب الطاقہ گردیدہ کہ ہیچ نمودے و بودے و جمعیتے و عزمے در آنہا باقی نماندہ است۔ بہر سو کہ برانند میروندو بہر جا کہ دوانند بہا نہ نمی انگیزند حل این سر چنان تواند بود کہ چون از مدد مدیدہ متصلًا مسخر و منقاد ملوک اجانب و لذا معرا از لباس زیبائے سروری و شاہی بودہ اند معتاد
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 540
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 540
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/540/mode/1up
    و دؔ ولۃ۔ انتابت الملوک علیہم من غیر قومہم فہم بہ معتادون۔ مثل المسلمین کمثل ماء لا یجری الا الی ارضٍ غورٍ ذات حطوط، و مثل عبدۃ الاحجارکقوم لوط۔ او کحمیر احتجت لسوقھا الی سوط۔ او عصا مخروط۔ تلک عظام نخرۃ و ھم قوم کانوا عرجوا ویعرجون۔ ھذا ما رأیت فقلت نصحًا للّٰہ و اخلاصا فی حضرتک والأمر الیک و انا تابعون۔
    ترجمہ : د خوگر بہ مذلت و زبونی گردیدہ و ادنی ملا بستے بہ سربلندی و علو نداشتہ اند۔ من آنچہ شرط بلاغ و اخلاص و لازم نصح و ارادت است بتقدیم رسانیدم اکنون امر بدست تست و ماکہ تابع و مطیع فرمان می باشیم۔
    الخاتمۃ فی بعض الحالات الخاصۃ التی ھی
    مفیدۃ للمستطلعین الذین
    یتمنون زیادۃ المعرفۃ فی سوانحی
    وسوانح آبائی و سوانح
    بعض اخوانی فی الدین
    الحمد للّٰہ الذی جعل العلماء الروحانیین المحدثین ورثۃ النبین و أدبہم فأحسن تأدیبھم، و أزال کدوراتھم کلھا و جعلھم کالماء المعین۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 541
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 541
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/541/mode/1up
    و ؔ علّمھم فصفّی علومھم و عرّفھم فأتمّ معارفھم و بلّغھم الی منارات حق الیقین۔ و وفقھم فدّق لوازم التوفیق فی نیّاتھم و أعمالھم و أفعالھم وأقوالھم حتی تزکّوا و تراء وا کسبیکۃ الذھب بلمع مبین۔ و شرح صدورھم وأکمل نورھم و جعل وجھہ حبورھم و سرورھم و جعلھم من غیرہ منقطعین۔ و رفع مقامھم و ثبت اقدامھم و نوَّرا فھامھم و طھر فراستھم والھامھم و أعطی جواھر السیوف اقلامھم و لمعات الدر کلامھم، وآمنھم من کل خوف و أعطاھم من کل شیء فتبارک اللّٰہ أکرم المعطین۔ والصلوۃ والسلام علی السید الکریم الجلیل الطیب خاتم الانبیاء و فخر المرسلین، الذی سبق الاولین والآخرین فی الاھتداء والاصطفاء والاجتباء والترحم علی عباد اللّٰہ حتی سمی ببعض أسماء رب العالمین۔ لا شرف الا و ھو الاول فیہ و لا خیر اِلَّا و ھو الدال علیہ و لا ھدایۃ الا و ھو منبعھا و من ابتغی الھدی ممن سواہ فھو من الھالکین۔ اما بعد فأری ایھا الاخوان ان أفصل لکم قلیلا من بعض حالاتی الخاصۃ و حالات آبائی لتزدادوا معرفۃ و بصیرۃ و ما توفیقی الا باللّٰہ الذی انطقنی من روحہ ھو ربی و محسنی ومعلمی و ھو الذی نورنی بأنوار الیقین۔ فاعلموا یا اخوان ان اسمی غلام احمد واسم أبی غلام مرتضی و اسم ابیہ عطا محمد و کان عطا محمد ابنُ گل محمد وُ گل محمد ابن فیض محمد و فیض محمد ابن محمد قائم و محمد قائم ابن محمد اسلم و محمد اسلم ابن محمد دلاور و محمد دلاور ابن الہ دین و الہ دین ابن جعفر بیگ و جعفر بیگ ابن محمد بیگ و محمد بیگ ابن عبدالباقی و عبدالباقی ابن محمد سلطان
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 542
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 542
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/542/mode/1up
    و ؔ محمد سلطان ابن میرزا ھادی بیک المورث الاعلی۔ فذالک اسمی
    و ھذہ اسماء آبائی غفر اللّٰہ لنا ولھم و ھو أرحم الراحمین۔
    و ان استطلعتم علاماتٍ لابد منہا فی ایصال المکاتیب إلیّ فاکتبوا ھکذا علی لفافۃ مکتوبکم اعنی بذالک قادیان ضلع گورداسپورہ قسمۃ امرتسر ملک فنجاب من ممالک ھند واکتبوا علیہ اسمی ’’میرزا غلام احمد قادیانی‘‘ یصلنی انشاء اللّٰہ تعالی و ھو خیر الموصلین۔ والآن ابین لکم من بعض واقعات أری فی تبیینھا خیرا و برکۃ و تفھیم ما لا تعلمون بعلم الیقین۔ فاعلموا ایھا السادۃ انّ آبائی کما ذکرت فیما مر کانوا من عظماء الحراثین و کانت صناعتہم الفلاحۃ و کانوا من أھل الامارۃ والقری والأرضین۔ و کانوا من أکرم جرثومۃ و أطھر أرومۃ۔ ذوی فضل و وجاھۃ،
    و سیدودۃ و نباھۃ۔ بناۃ المجدو ارباب الجد و من المقبولین۔ و کانوا فی زوایا ھذہ الارض خبایا و بقایا من الامراء الصالحین و بعضھم کان من مشاھیر المشایخ و نادرۃ الدھر فی التزام دقائق العفۃ و أنواع الصالحات و صاحب الأوقات المشھود بالکرامات و الآیات و خرق العادات و من المتعبدین المنقطعین۔ و کانوا فی ھذہ الارض ثاوین فی الکفرۃ الفجرۃ فصبّت علیہم ما صبت و قد ذکرناھا من قبل للناظرین و کنا ذریۃ ضعفاء من بعدھم و من المستضعفین۔ و لما مکر ’’الخالصۃ‘‘ مکرھم و أخرجوا آباء نا من دیارھم توفی جدی فی الغربۃ و سمعت انہ مات و ھو من المسمومین و بقی ابی یتیمًا غریبا مسافرًا خاوِیَ الوفاض، بادی الإنفاض، مضروب النوازل کالملّم فی اللیل المدلّھم۔ یجوب طرقات البلاد مثل الھائم ما یدری
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 543
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 543
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/543/mode/1up
    ما ؔ الشمال و لا الیمین۔ و کان شغل أبی فی تلک الأیام مکابدۃ صعوبۃ الاسفار أو مطالعۃ الاسفار۔و سمعت منہ (غفر اللّٰہ لہ) مرارا أنہ کان یقول کل ما قرأت قرأتہ فی ایام المصائب و الغربۃ والتباعد من الدار۔ و کان یقول مرارًا انی جربت الخاص والعام کما یجرب الحائر الوحید۔ و رأیت مکارہ کنت منھا أحید، و کان من المزء ودین۔ فکان أبی طالما سارکمستہام لیس لہ قیام، لأنہ کان اخرج من ارض الآباء و صُدّ عن الانکفاء و کان عرضۃ لنزوات الظالمین، و اعنات الموذین و غیل المغتالین و سلب السالبین و طُعمۃً للمغیرین۔ و اسیرًا فی اکف الضائمین۔ ثم بعد تراخی الأمد و تلاقی الکمد۔ قصد ’’کشمیر‘‘ یستقری أسباب المعاش لعل اللّٰہ یدرأ بلاء ہ، و یدفع داء ہ، و یاتی قضاء ہ بایام الْاِطْرغشاش و یکون من المطعمین۔ و قد اتفق فی تلک الایام ان ربی البسنی خلعۃ الوجود، و نقلنی من زوایا الکتم إلی مناظر الشھود، و صرت علی مسقط رأسی من الساجدین و کانت ھذہ ھی الایام التی بدل اللّٰہ ابی من بعد خوفہ امنا و من بعد عسرہ یسرا و صار من المنعمین۔ و أوی لہ الوالی ورق قلبہ لمصیبتہ و من غیر اللیالی، فلما کلمہ ورأی الوالی۔ ما اعطاہ اللّٰہ من العلم والعقل والطبع العالی۔ شھد توسّمہ بانہ من أبہی اللآلی، فصبا الی الاسعاف والاختصاص، والتسلیک فی زمرۃ الخواص، و قال لا تخف انک الیوم من اعواننا المکرمین۔ و کذالک مکّن اللّٰہ ابی و حبّبہ إلی أعینھم و وھب لہ عزۃً و قبولًا و میسرۃ، و نظر الیہ انعامًا و میاسرۃ ، و کان
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 544
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 544
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/544/mode/1up
    ھذاؔ فضل اللّٰہ و رحمتہ و ھو ارحم الراحمین۔ و سمعت امی تقول لی مرارًا ان ایامنا بُدّلت من یوم ولادتک و کنا من قبل فی شدائد و مصائب و ذا أنواع کروبٍ و محن فجاء نا کل خیر بمجیئک و انت من المبارکین۔ و کان ابی یعرج من مرتبۃ الی أُخری، و من عالیۃ الی علیا، حتی عرج الی معارج الاقبال، و خلع اللّٰہ علیہ من خُلَع الاکرام والإجلال۔ و ما أَلتہ من شیء و صار من المتمولین۔
    ثم غلب علیہ تذکار الوطن، والحنین الی المسارح المہجورۃ والعطن، فقوّض خیام الغربۃ والغیبۃ، وأسرج جواد الأوبۃ الی الأھل والعشیرۃ و رجع سالمًا غانما الی العترۃ بنضرۃ و خضرۃٍ و متاعٍ و أثاثٍ رحیب الباع، خصیب الرباع۔ و کان ذالک فعل اللّٰہ الذی اذھب عنا حزننا، و اماط شجننا، و من علینا، و تولی و تکفل و احسن الینا، و ھو خیر المحسنین۔
    ثم عزم ابی علی ان یسبر بختہ فی الزراعات لینجو من السفر المبرِّح، والبین المطوح من الاھل والبنین والبنات۔ فاستحسن لنفسہ اتخاذ الضیاع، والتصدی للازدراع، فأحمد بفضل اللّٰہ معیشتہ و استرغد فیھا عیشتہ و رُدّ علیہ قلیل من القری، التی غصبت من الآباء فی زمن خلا۔ و قوّاہ اللّٰہ بعد ضعف المریرۃ، و بارک اللّٰہ لہ فی اشیاء کانت من قبل نکدالحظیرۃ۔ وکل ذالک کان من فضل اللّٰہ و رحمتہ و ان خفی علی المحجوبین۔ لیتم قول رسولہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ان الموعود الآتی یکون من الحارثین۔ ھذا قلیل من سوانح ایام ولادتی و صغر سنی
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 545
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 545
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/545/mode/1up
    و ؔ لما ترعرعتُ و وضعتُ قدمی فی الشباب قرأت قلیلا من الفارسیۃ
    و نبذۃ من رسائل الصرف والنحو و عدۃ من علوم تعمیقیۃ و شیءًا یسیرًا من کتب الطب۔ و کان ابی عرّافًا حاذقًا و کانت لہ ید طولی فی ھذا الفن فعلمنی من بعض کتب ھذہ الصناعۃ و اطال القول فی الترغیب لکسب الکمال فیھا فقرأت ما شاء اللّٰہ ثم لم أجد قلبی الیہ من الراغبین۔ وکذالک لم یتفق لی التوغل فی علم الحدیث والاصول والفقہ الا کطلّ من الوبل، وما وجدت بالی مائلا الی ان أشمرّ عن ساق الجد لتحصل تلک العلوم، و استحصل ظواھر اسنادھا اواقیم کالمحدثین سلسلۃ الأسانید لکتب الحدیث۔ و کنت احب زمرۃ الروحانیین۔ و کنت أجد قلبی مائلا الی القرآن و دقائقھا و نکاتھا و معارفھا۔ و کان القرآن قد شغفنی حبا و رأیت أنہ یعطینی من انواع المعارف و اصناف ثمار لا مقطوعۃ و لا ممنوعۃ، و رایت انہ یقوی الایمان و یزید فی الیقین۔ وواللّٰہ انہ درۃ یتیمۃ ظاھرہ نور و باطنہ نور و فوقہ نور و تحتہ نور و فی کل لفظہ
    و کلمتہ نور۔ جنّۃ روحانیۃ ذُلّلت قطوفھا تذلیلا و تجری من تحتہ الانھار۔ کل ثمرۃ السعادۃ توجد فیہ و کل قبس یقتبس منہ و من دونہ خَرْطُ القتاد۔ موارد فیضہ سائغۃ فطوبی للشاربین۔ و قد قذف فی قلبی انوار منہ ما کان لی ان استحصلھا بطریق آخر۔ و واللّٰہ لو لا القرآن ما کان لی لطف حیاتی۔ رأیت حسنہ ازید من ماءۃ الف یوسف، فملت إلیہ أشد میلی و اُشرب ھو فی قلبی۔ ھو ربّانی کما یربی الجنین۔ و لہ فی قلبی اثر عجیب و حسنہ یراودنی عن نفسی۔ و انی ادرکت بالکشف أن حظیرۃ القدس تسقی بماء القرآن
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 546
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 546
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/546/mode/1up
    و ؔ ھو بحر مواج من ماء الحیاۃ من شرب منہ فھو یحیی بل یکون من المحیین۔ و واللّٰہ انی أری وجھہ احسن من کل شیء۔ وجہ اُفْرِغَ فی قالب الجمال، و أُلبس من الحسن حلّۃ الکمال۔ و انی اجدہ کجمیل رشیق القد، اسیل الخد، اُعطی لہ نصیب کامل من تناسب الاعضاء، و اسبغت علیہ کل ملاحۃ بالاستیفاء، و کل نور و کل نوع الضیاء۔ و ضَییءٌ اعطی لہ حظ تام من کل ما ینبغی فی المحبوبین، من الاعتد الات المرضیۃ۔ والملاحات المتخطفۃ، کمثل حور العیون، و بلج الحواجب ولھب الخدود و ھیف الخصور، و شَنَب الثغور و فلج المباسم و شمم الانوف و سقم الجفون، و ترف البنان و الطُّرر المزینۃ و کل ما یصبی القلوب
    و یسر الاعین و یستملح فی الحسین۔ و من دونہ کل ما یوجد من الکتب فہی نَسَمَۃ خداج او کمضغۃ مسقطۃ غیر دماج ان کانت عین فلا أنف و ان کان انف فلا عین و تری وجوھہا مکروھۃ مسنونۃ ملوحۃ۔ و مثلھا کمثل امراۃ اذا کشف برقعھا و قناعھا عن وجھہا فإذا ھی کریھۃ المنظر جدا قد رُمی جفنھا بالعَمَش، و خدھا بالنمش و ذوائبھا بالجلح و دررھا بالقلح و وردھا بالبھار و مسکھا بالبخار، و بدرھا بالمحاق، و قمرھا بالانشقاق، و شعاعھا بالظلام، و قوتھا بالشیب التام۔ فہی کجیفۃ متعفنۃ نتنۃ منتنۃ تؤذی شامۃ الناس و تستأصل سرور الاعین، یتباکون اھلھا لافتضاحھم و یتمنی النظیفون ان یدسّوھا فی تراب أو یذبّون عن انفسھم الی اسفل السافلین۔ فالحمد للّٰہ ثم الحمد للّٰہ انہ انالنی حظًّا وافرًا من انوارہ و أزال املاقی من دررہ، واشبع بطنی من اثمارہ،
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 547
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 547
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/547/mode/1up
    و ؔ منح بی من النعم الظاھرۃ والباطنۃ و جعلنی من المجذوبین۔و کنت شاباً و قد شختُ وما استفتحت بابا الافتحت، و ما سألت من نعمۃ الا اعطیت وما استکشفت من أمر الا کشفت، و ما ابتھلت فی دعاءٍ الّا اجیبت۔
    و کل ذالک من حبی بالقرآن و حب سیدی و امامی سید المرسلین، اللھم صل وسلم علیہ بعدد نجوم السماوات و ذرات الارضین۔ و من اجل ھذا الحب الذی کان فی فطرتی کان اللّٰہ معی من اول امری حین ولدت
    و حین کنت ضریعا عند ظئری و حین کنت أقرأ فی المتعلمین۔ و قد حبب الی منذ دنوت العشرین ان انصر الدین۔ و اجادل البراھمۃ و القسیسین۔ وقد الفت فی ھذہ المناظرات مصنفات عدیدۃ و مؤلفات مفیدۃ منھا کتابی ’’البراھین‘‘۔ کتاب نادر ما نسج علی منوالہ فی أیام خالیۃ فلیقرء ہ من کان من المرتابین۔ قد سللت فیہ صوارم الحجج القطعیۃ علی أقوال الملحدین، ورمیت بشھبھا الشیاطین المبطلین۔ قد خفض ھام کل معاند بذالک السیف المسلول، و تبیّنت فضیحتھم بین أرباب المنقول والمعقول و بین المنصفین۔ فیہ دقائق العلوم و شواردھا والالھامات الطیبۃ الصحیحۃ والکشوف الجلیلۃ و مواردھا، و من کل ما یجلی درر معارف الدین المتین ولی کتب أخری تشابھہ فی الکمال، منھا الکحل والتوضیح والازالۃ و فتح الاسلام و کتاب آخر سبق کلھا اَلّفتہ فی ھذہ الایام اسمہ ’’دافع الوساوس‘‘ ھو نافع جدا للذین یریدون ان یروا حسن الإسلام و یکفون افواہ المخالفین۔ تلک کتب ینظر الیھا کل مسلم بعین المحبۃ و المودۃ و ینتفع من معارفھا و یقبلنی و یصدّق
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 548
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 548
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/548/mode/1up
    دعوؔ تی۔ الا ذریۃ البغایا الذین ختم اللّٰہ علی قلوبھم فھم لا یقبلون۔ و لما بلغت أشد عمری و بلغت اربعین سنۃ جاء تنی نسیم الوحی بِرَیَّا عنایات ربی لیزید معرفتی و یقینی و یرتفع حجبی و اکون من المستیقنین فأول ما فتح علیّ بابہ ھو الرؤیا الصالحۃ فکنت لا أَری رؤیا الا جاء ت مثل فلق الصبح۔ و انی رأیت فی تلک الایام رؤیا صالحۃ صادقۃ قریبًا من ألفین او أکثر من ذالک۔ منھا محفوظۃ فی حافظتی و کثیر منھا نسیتھا، و لعل اللّٰہ یکررھا فی وقت آخر و نحن من الآملین۔ و رأیت فی غُلَواء شبابی و عند دواعی التصابی کانی دخلت فی مکان و فیہ حفدتی و خدمی فقلت: طھّروا فراشی فان وقتی قدجاء ثم استیقظتُ وخشیت علی نفسی و ذھب وھلی الی اننی من المائتین۔ و رایت ذات لیلۃ و انا غلام حدیث السن کأنّی فی بیت لطیف نظیف یذکر فیھا رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم فقلت ایھا الناس این رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم فأشاروا إلی حجرۃٍ فدخلتُ مع الداخلین۔ فبش بی حین وافیتہ، و حیّانی بأحسن ما حییتہ وما أنسی حسنہ وجمالہ و ملاحتہ و تحننہ الی یومی ھذا۔ شَغَفَنِیْ حبًّا و جذبنی بوجہ حسین قال ما ھذا بیمینک یا احمد فنظرت فاذا کتاب بیدی الیمنی و خطر بقلبی انہ من مصنفاتی قلت یا رسول اللّٰہ کتاب من مصنفاتی قال ما اسم کتابک فنظرت الی الکتاب مرۃ أخری و أنا کالمتحیّرین، فوجدتہ یشابہ کتابًا کان فی دار کتبی واسمہ ’’قطبی‘‘ قلت یا رسول اللّٰہ اسمہ قطبی۔ قال ارنی کتابک القطبی فلما
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 549
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 549
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/549/mode/1up
    أخذؔ ہ و مستہ یدہ إذا ھی ثمرۃ لطیفۃ تسرّ الناظرین۔ فشققھا کما یشقق الثمر فخرج منھا عسل مصفّٰی کماء معینٍ۔ و رایت بَلّۃَ العسل علی یدہ الیمنی من البنان الی المرفق کان العسل یتقاطر منھا و کأنہ یرینی ایاہ لیجعلنی من المتعجبین۔ ثم أُلقی فی قلبی ان عند اُسْکُفَّۃ البیت میت قدر اللّٰہ إحیاۂ بھذہ الثمرۃ و قدّر أن یکون النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم من المحیین۔ فبینما انا فی ذالک الخیال فاذا المیّت جاء نی حیًّا و ھو یسعی و قام وراء ظھری و فیہ ضعف کانہ من الجائعین۔ فنظر النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم الی متبسما و جعل الثمرۃ قطعات و اکل قطعۃ منھا و آتانی کل مابقی و العسل یجری من القطعات کلھا و قال یا احمد اعطہ قطعۃ من ھذہ لیأکل و یتقوی فأعطیتہ فأخذ یأ کل علی مقامہ کالحریصین۔ ثم رأیت ان کرسی النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم قد رفع حتی قرب من السقف و رأیتہ فاذا وجھہ یَتَلَأْ لَ أُ کأن الشمس والقمر ذُرّتا علیہ و کنت انظر الیہ
    و عبراتی جاریۃ ذوقًا و وجدًا ثم استیقظت و انا من الباکین۔ فالقی اللّٰہ فی قلبی ان المیت ھو الاسلام و سیحییہ اللّٰہ علی یدی بفیوض روحانیۃ من رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم وما یدریکم لعل الوقت قریب فکونوا من المتنظرین و فی ھذہ الرؤیا ربّانی رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم بیدہ
    وکلامہ و انوارہ و ھدیۃ اثمارہ فانا تلمیذہ بلا واسطۃ بینی و بینہ وکذالک شان المحدثین۔ و کنت ذات یوم فرغت من فریضۃ المساء و سننھا وانا مستیقظ ما أخذ نی نوم و لا سنۃ و ما کنت من النائمین۔ فبینما أنا کذالک
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 550
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 550
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/550/mode/1up
    اذا ؔ سمعت صوت صکِّ الباب فنظرت فاذا المدکُّون یاتوننی مسارعین۔ فاذا دنوا منی عرفت أنہم خمسۃ مبارکۃ أَعنی علیّا مع ابنیہ و زوجتہ الزھراء و سید المرسلین۔ اللھم صل و سلم علیہ و آلہ الی یوم الدین۔
    و رأیت أن الزھراء وضعت رأسی علی فخذھا و نظرت بنظرات تحنن کنت اعرف فی وجھھا ففھمت فی نفسی ان لی نسبۃ بالحسین و أشابھہ فی بعض صفاتہ و سوانحہ واللّٰہ یعلم و ھو اعلم العالمین۔ و رأیتُ أن علیًّا رضی اللّٰہ عنہ یرینی کتابًا و یقول ھذا تفسیر القرآن انا الفتہ و أمرنی ربی ان اعطیک فبسطت الیہ یدی و اخذتہ وکان رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ وسلم یری و یسمع ولا یتکلم کأنہ حزین لأجل بعض أحزانی و رأیتہ فاذا الوجہ ھو الوجہ الذی رایت من قبل انارت البیت من نورہ فسبحان اللّٰہ خالق النور والنورانیین۔ و کنت ذات لیلۃ اکتب شیئا فنمت بین ذالک فرأیت رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم و وجھہ کالبدر التام فدنا منی کانہ یرید ان یعانقنی فکان من المعانقین۔ و رأیت أن الانوار قد سطعت من وجھہ
    و نزلت علیّ کنت أراھا کالانوار المحسوسۃ حتی أَیقنتُ انی ادرکھا بالحس لا ببصر الروح۔ وما رأیت انہ انفصل منی بعد المعانقۃ و ما رأیت انہ کان ذاھبا کالذاھبین۔ ثم بعد تلک الأیام، فتحت علیّ أبواب الالھام
    و خاطبنی ربی و قال ’’یا احمد بارک اللّٰہ فیک۔ الرحمٰن علم القرآن لتنذر قومًا ما اُنذر آباؤُھم، و لتستبین سبیل المجرمین۔ قل انی أُمرت و أنا أول المؤمنین یا عیسٰی انّی متوفیک و رافعک الی و مطھرک من الذین کفروا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 551
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 551
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/551/mode/1up
    وجاؔ عل الذین اتبعوک فوق الذین کفروا الی یوم القیامۃ۔ انک الیوم لدینا مکین امین۔ انت منی بمنزلۃ توحیدی و تفریدی فحان ان تعان و تعرف بین الناس۔ و یعلمک اللّٰہ من عندہ۔ تقیم الشریعۃ۔ و تحیی الدین انا جعلناک المسیح بن مریم۔ و اللّٰہ یعصمک من عندہ ولو لم یعصمک الناس۔ واللّٰہ ینصرک ولو لم ینصرک الناس۔ الحق من ربک فلا تکونن من الممترین۔ یا أحمدی أنت مرادی و معی۔ انت وجیہ فی حضرتی۔ اخترتک لنفسی۔ قل ان کنتم تحبون اللّٰہ فاتبعونی یحببکم اللّٰہ
    و یغفرلکم ذنوبکم و یرحم علیکم و ھو أرحم الراحمین۔‘‘ ھذہ نبذۃ من الھاماتی، و من جملتھا إلھام ’’انا جعلناک المسیح بن مریم‘‘۔ و واللّٰہ قد کنت اعلم من ایام مدیدۃ اننی جُعِلت المسیح ابن مریم و انی نازل فی منزلہ ولکن أخفیتہ نظرًا الی تأویلہ، بل ما بدلت عقیدتی و کنت علیھا من المستمسکین و توقفت فی الاظھار عشر سنین و ما استعجلت و ما بادرتُ و ما اخبرتُ حِبًّا و لا عدوًّا و لا أحدًا من الحاضرین۔ و ان کنتم فی شک فاسئلوا علماء الھند کم مضت من مدۃ علی الھامی۔’’ یا عیسٰی انی متوفیک‘‘۔ أو اقرؤوا البراھین۔ و کنت انتظر الخِیَرۃ والرضاء و أمر اللّٰہ تعالی حتی تکرر ذالک الإلھام، و رفع الظلام، و تواتر الإعلام، و بلغ الی عدۃ یعلمھا رب العالمین۔ و خوطبت للإظھار بقولہ: فاصدع بما تؤمر۔ وظھرت علامات تعرفھا حاسۃ الاولیاء، و عقل ارباب الاصطفاء و جُلِّی الصبح و أُکّد الامر، و شرح الصدر، واطمأن الجنان، و أفتی القلب، و تبین أنہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 552
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 552
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/552/mode/1up
    وحیؔ اللّٰہ لا تلبیس الشیاطین۔ ثم ما اکتفیت بھذا بل عرضتہ علی الکتاب والسنۃ و دَعوتُ اللّٰہ ان یؤیدنی، فدقق اللّٰہ نظری فیھما و جعلنی من المؤیّدین۔ و ظھر علیّ بالنصوص البینۃ القرآنیۃ و الحدیثیۃ ان المسیح بن مریم علیہ السلام قد توفی و لحق بإخوانہ من النبیین۔ و کنت أعلم أن وفاۃ المسیح حق ثابت بالنصوص البینۃ القطعیۃ القرآنیۃ والحدیثیۃ واعلم ان إلھامی لاغبار علیہ و لا تلبیس و لا تخلیط، و مع ذلک کان یقینی بأن اعتقاد المسلمین فی نزول المسیح حق لا شبھۃ فیہ و لا ریب فعسُر علیّ تطبیقھما و کنت من المتحیرین۔ فما قنعت بالنصوص فقط لأنی وجدت فی الأحادیث رائحۃ قلیلۃ یسیرۃ من دُخْن الاختلاف بظاھر النظر و إن کانت الدلائل القویۃ القاطعۃ معنا و بأیدینا و کان القرآن معنا کلہ بل ابتغیت معرفۃ تامۃً نقیۃ بیضاء التی یتلألأ کل شق من شقوقھا
    و تبلّغ الی الحق الیقین۔ فتضرعت فی حضرۃ اللّٰہ تعالی و طرحت بین یدیہ متمنیًا لکشف سرالنزول و کشف حقیقۃ الدجال لأعلمہ علم الیقین و أری بہ عین الیقین۔ فتوجھت عنایتہ لتعلیمی و تفھیمی
    و أُلھمت و عُلِّمتُ من لدنہ أن النزول فی أصل مفھومہ حق ولکن ما فھم المسلمون حقیقتہ۔ لان اللّٰہ تعالی أراد اخفاء ہ فغلب قضاء ہ و مکرہ وابتلاء ہ علی الأفھام فصرف وجوھھم عن الحقیقۃ الروحانیۃ الی الخیالات الجسمانیۃ فکانوا بھا من القانعین۔ و بقی ھذا الخبر مکتومًا مستورًا کالحبّ فی السنبلۃ قرنا بعد قرن، حتی جاء زماننا واغترب الاسلام
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 553
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 553
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/553/mode/1up
    و ؔ کثرت الآثام، و غلبت ملۃ عبدۃ الصلیب فصالوا علی المسلمین بالافتراء والمَین، و أَحلُّوا سفک عُشّاقٍ کانوا کصید الحرمین۔ فصبت علینا مصائب کنا لا نستطیع احصاء ھا و ضاقت الارض علینا و تورمت مقلتنا باستشراف الناصرین۔ فاراد اللّٰہ ان یاتی بصبح الصداقۃ، و یعین طلاب الحقیقۃ من الاعالی والأدانی، بنَضْوِ الوِشاح عن مخدّرۃ المعانی، و یشفی صدور المؤمنین۔ و کنا احق بھا و اھلھا لأنا راینا بأعیننا اطراء المسیح و ازدراء المصطفٰی و دعوۃ الناس الی ألوھیّۃ ابن مریم و سبّ خیرالوریٰؐ، و سمعنا السبّ مع الشرک والمین۔ و احرقنا بالنارین۔ فکشف اللّٰہ الحقیقۃ علینا لتکون النار علینا بردًا
    و سلامًا، و کان حقا علی اللّٰہ نصر المضطرین۔ فأخبرنی ربی ان النزول روحانی لا جسمانی وقد مضی نظیرہ فی سنن الاولین۔ و ان اللّٰہ لا یبدل سنتہ و لا عاداتہ و لا یکلف نفسًا الّا وسعھا و کذالک یفعل و ھو خیر الفاعلین۔ والسر فی ذالک أن للأنبیاء عند ھبِّ الاھویۃ المھلکۃ و ابتداع المسالک الشاغرۃ تدلیات و تنزلات الی ھذا العالم فاذا جاء وقت تدلی نبی و نزولہ بمجییء فتنۃ تؤذیہ یطلب من ربہ محط انوارہ۔ و مظھر إرادتہ و أنظارہ، و وارث روحانیتہ لیکون ھذا المظھر لہ من المنشطین۔ فیعدّ لہ ربہ عبدًا من عبادہ و یلقی اراداتہ فی قلبہ فیکون ھذا العبد أشد مناسبۃ و اقرب جوھرًا من ذالک النبی و یشابھہ من حیث الھویۃ المبعوثیۃ مشابھۃً تامۃً کاملۃ کانّہ ھو۔ و یکمل ما تزیّف فی قومہ المخذولین۔ و ذالک سر عظیم من الأسرار السماویۃ۔ ما یفھمہ عقول سطحیۃ و لا یلقاھا الا الذین اوتوا العلم من عنداللّٰہ وما کان لعین لاقت الاعتلال ان تجتلی الھلاؔ ل فطوبی للمبصرین۔ و قد جرت عادۃ اللّٰہ تعالی علی انہ لا یکشف قناع الاخبار الآتیۃ من کل جھۃ الا فی وقتھا و یبقی قبل الوقت بعض اغماضات و معان مطویۃ و مستورۃ مکتومۃً ابتلاءً للذین یجدون زمان ظھورھا فیفضّ الختم فی زمانھم۔ لیھینھم او یکرمھم بامتحانھم و قد
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 554
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 554
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/554/mode/1up
    مضتؔ سنتہ فی فتنۃ المسلمین۔ و لا یرفع الامان من ذالک *لان الأمر المقصود یبقی علی حالہ، مع قرائنہ القویۃ و صفاء زلالہ فلا یتطرق الاختلال الیہ و انما یجدّد اللّٰہ حلل ظھورہ فی اعین الناس لیری من یعقد حبک النطاق للرحلۃ من خریبتہ کانوا آباء ہ فیہ ساکنین۔ والحق أن کل ظن فاسد ینشأ من سوء الفھم،
    و اما وعد اللّٰہ فھو یظھر بلا خلاف۔ واللّٰہ لا یخلف المیعاد۔ و کم من وعو ؤاسنی لنا ثم انجز لنا کما وعد و ھو خیر المنجزین۔ و لعمری ان السفہاء لم یحفظوا کلام اللّٰہ کلہ فی اذھانھم وآمنوا ببعض الآیات و کفروا ببعضھا و جعلوا القرآن والحدیث عضین۔ و أراھم أساری فی سلاسل الاختلافات والتشاجرات، ولو انھم تفکروا للتطبیق لفتح اللّٰہ علیھم بابا من ابواب المعرفۃ ولکن غضوا و ترکوا القرآن مہجورا فطبع اللّٰہ علی قلوبھم و ترکھم ضالین۔
    اما الدجّال فاسمعوا أُبیّن لکم حقیقتہ من صفاء الھامی و زلالی و ھو حجۃ قاطعۃ ثقفت للمخالفین تثقیف العوالی خذوہ و لا تکونوا ناسی ئاو متناسین۔ ایہا الاعزۃ قد کشف علیّ ان وحدۃ الدجال لیست وحدۃ شخصیۃ بل وحدۃ نوعیۃ بمعنی اتحاد الآراء
    الاصل المحکم والخفیر الاعظم فی طرق المکاشفات الذی ھو کقانون عاصم من سوء الفھم فی تفسیر النبوات الواقعۃ فی ھذا العالم العنصری علم تاویل الاحادیث الذی یعطی للصدیقین۔ و لا یجوز صرف امر کشفی عن التاویلات المصرحۃ فی ھذا العلم الا عند قیام قرینۃ قویۃ موصلۃ الی الیقین، لأن ھذا العلم انما جعل بمنزلۃ لغۃ کاشفۃ لأسرار المکاشفات أحکمت قواعد ھا و فرض ا تباعھا للمؤمنین۔ فکما ان اللغات المستعملۃ الجاریۃ علی الألسنۃ قاضیۃ لحل التنازعات اللغویۃ فی العالم السفلی و حجۃ قاطعۃ للمتکلمین، کذالک علم تاویل الاحادیث و قواعدہ التی رتبھا لسان الأزل حکم مسلم لقضاء التنازعات الکشفیۃ و من ابی ھذا لحکم فقد جار جورًا عظیما و ھو من الظالمین۔ مثلا اذا احتذیت حذاء فی رؤیاک فلا یجوز لک عند تاویلہ ان تعنی من الحذاء ما یعنی فی لغات ھذا العالم السفلی بل یجب علیک ان ترجع الی لغۃ وضعھا اللّٰہ لذالک العلم الروحانی فتؤول الحذاء زوجۃً او وُسعۃَ معاش فخذ ھذا السر فانہ ینجیک من آفات المخطین۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 555
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 555
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/555/mode/1up
    فی ؔ نوع الدجّالیۃ کما یدل علیہ لفظ الدجال و ان فی ھذا الاسم آیات للمتفکرین۔ فالمراد من لفظ الدجال سلسلۃ ملتئمۃ من ھمم دجالیۃ بعضھا ظھیر للبعض کأنھا بنیان مرصوص من لبن متحدۃ القالب کل لبنۃ تشارک ما یلیھا فی لونھا و قوامھا و مقدارھا و استحکامھا
    و أُدخلت بعضھا فی بعض و اشیدت من خارجھا بالطین، أو کرکبٍ ردف بعضھم بعضا و ھم ممتطین شملۃً مشمعلّۃً یرون من شدۃ سرعتھا رجلًا واحدًا فی اعین الناظرین۔ و نظیرہ فی القرآن خبر الدخان۔ فانہ کان سلسلۃ خیالات متفرقۃ من شدۃ الجوع و سُمّی بشیء واحد و قیل 3 ۱؂۔ و ھذا سِرٌّ لایعرفھا الا العرّافۃ و ما یُطِلّ علیہ فھم الغبیّین۔
    و قد جرت عادۃ الناس عربًا و عجمًا أنھم إذا رأوا کیفیۃ وحدانیۃ فی افراد فینزلونھا فی منزل الواحد نحو أدویۃ مختلفۃ فاذا خلط بعضھا ببعض و دق و سحق و حصل لھا مزاج واحد و أثر واحد فما علیک من ذنب ان قلت انہ شیء واحد حصل من العجین۔
    و انت تعلم أن الناس إذا اجتمعوا فی أرض و القوا فیھا مراسی السکون و حصل لھم نظام تمدنی و تعلق بعضہم بالبعض تعلقًا مستحکمًا و تحقق النسب والاضافات غیر قابلۃ الانفکاک و الزوال و استقرّوا وما ارادوا ان یرتحلوا منھا الی ارض من الارضین، فان شئت تسمی مجموعتھم ’’بلدۃ‘‘
    و تجری علی جماعتھم أحکام الواحد وما ھو واحد فی الحقیقۃ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 556
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 556
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/556/mode/1up
    و ماؔ انت من الملومین۔ و ان اتفق انھم جاء وک للقائک فان شئت قلت ’’جاء نی البلد‘‘۔ و ذکرتھم کما یذکر الفرد الواحد و ما یعترض علیک اِلّاجاھل او الذی کان من المتجاھلین۔ فکما أن الأماکن یطلق علیھا اسم الواحد مع انھا لیست بواحدۃ، کذالک لا یخفی علی القرائح السلیمۃ والذین لھم حظ من أسالیب لسان العرب و لطائف استعاراتھم أَن أذیال ھذہ الاستعارات مبسوطۃ ممتدۃ جدًا و لیست محدودۃ فی مورد خاص فانظر حتی یاتیک الیقین۔ و عجبت لقوم یزعمون فی الدجال انہ رجل من الرجال و یقولون انہ کان فی زمن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم و ھو الی الآن من الموجودین۔ أُّ فٍ لھم ولوھن رأیھم کیف یحکمون۔ الا یعلمون ان رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلّم قال۔ اقسم باللّٰہ ما علی الارض من نفس منفوسۃ یأتی علیھا ماءۃ سنۃ و ھی حیۃ یومئذٍ۔ یعنی بذالک ان الناس کلھم یموتون الی مضی الماءۃ و ما یکون فرد من الباقین۔ فما لھم یقرء ون ’’البخاری‘‘ و’’المسلم‘‘ ثم یضلون المسلمین۔ أیھا الاعزۃ ان فی ھذا الاعتقاد مصیبتان عظیمتان قد أزجتا کثیرا من الناس إلی نیران الکفران و منعتاھم من مرتع الجنان۔ فلا تخطوا صراطکم و لا تکونوا من المتخطین۔ اُولاھما المصیبۃ التی قد ذکرت من استلزام تکذیب قول النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم الذی أکدہ بالقسم فإیاکم و سوء الادب و کونوا من المتأدبین۔ لا تقدِّموا بین یدی اللّٰہ و رسولہ و لا تعصوا بعد ما بین لکم رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 557
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 557
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/557/mode/1up
    و اؔ علموا أنہ صادق صدوق ما ینطق عن الھوی۔ ان ھو الا وحی یوحی فاخفضوا جناح الذل و لا تأبوا قول رسول اللّٰہ ؐ ان کنتم صالحین۔ والمصیبۃ الثانیۃ ظاھرۃ لا حاجۃ لھا الی البیان۔ الا ترون الی الفرقان
    و تعلیم الرحمان۔ کیف أقام الناس علی توحید عظیم و نھاھم عن سنن المشرکین۔ فتفکروا فی قلوبکم کیف یمکن ان یخرج الدجال کما تزعمون و یحی الأموات و یری الآیات، و یسخر السحاب والشمس والقمر والبحار وکان امرہ اذا أراد شیئا ان یقول لہ کن فیکون۔ أھذا ما علمتم من القرآن۔ أھذا تعلیم الفرقان۔ أھذا الذی سفک لہ دماء سراۃ العرب و عظائم القریش ببدر و فی کل مصاف و ھضمھم المسلمون ھضم متلاف۔ اشھدوا و لا تکونوا من الکاتمین۔ کیف ینسخ تعلیم القرآن و ینبذ کالقشر۔ ویفیء المَنْشَر المطویّ الی النشر، و یجیء الدجال المفاجئ لتضلیل نوع البشر۔ لم تخرجون من خلع الصداقۃ
    و تنسون یوم الحشر۔ و تفسدون فی الأرض بعد اصلاحھا۔ اتقوا اللّٰہ
    و لا تکونوا من المعتدین۔ أ یمکن أن السید الذی کسر الأصنام بالعصا۔ و اذا سئل أغیر اللّٰہ قادر قال لا أ ھو یعلمکم امورا خلاف القرآن الکریم و خلاف التوحید العظیم۔ کلّا انہ أغیر من کل غیّور للّٰہ و توحیدہ فلا تفتروا علیہ عضیھۃ و لا تکونوا فریسۃ الشیاطین۔ ھذان بلاء ان فی اعتقادکم، و مصیبتان علی دینکم و توحیدکم و صلاحکم و سدادکم۔ و اما المعنی الذی بینت و لتعلیمہ تحزمت، فکلہ خیر لا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 558
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 558
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/558/mode/1up
    محذؔ ور فیہ و لا رائحۃ من شرک و لا من تکذیب النبی صلی اللّٰہ علیہ و سلم بل ھو أقر للعین، و فیہ نجاۃ من الثقلین، فاقبلوہ و کونوا من الشاکرین۔
    و کیف تظنون فی الذی ھو فی زعمکم من أبناء الغید، و تفوَّق من رَأْدٍ ضعیفۃ لا من الشیطان المرید، انہ یتقوی کالشیاطین، و یشابھہ فی بعض الأغارید، بل یکون أزید منھم و یصلب کالحدید۔ و یکون لہ جسم لا یسع الا فی سبعین باعا تفکروا یا ذریۃ الحُرَّیْن۔ أیجوز ان یتعطل اللّٰہ فی وقت خروجہ و یقدر الدجال علی کل امرٍ و کل ضیم۔ و تصیر تحت أمرہ شمس و قمر ونار و ماء وجنۃٌ و خزائن الارض
    و قطعۃ کل غیم۔ و یطوف علی کل الارض فی ساعۃ، و یدخل المشارق و المغارب تحت لواء الطاعۃ۔ و یضع الفأس علی رأس الناس و یجعلھم شقین ثم یحییھم مرۃ أخری و یری الخلق کذب آیۃ الفرقان 3 ۱؂ و یکون علی کل شیء من الفعالین یسحق التوحید تحت ارجلہ وکان بہ من المستھزئین۔ سبحان ربنا عما یصفون والحمد للّٰہ رب العالمین۔ ایھا الناس ان تحت ھذا النبأ سرٌّ۔ و فھم السر برٌّ۔ فاقبلوہ بوجہ طلیق وکونوا مسعدین۔ یرحم اللّٰہ علیکم و ھو ارحم الراحمین۔ ایھا الاعزۃ ھی العقیدۃ التی علمنی اللّٰہ من عندہ و ثبتنی علیھا فما استصوبہ بعض الغبیین، وما استجادوا قولی ھذا وارتابوا واستنکروا واستعجلوا فی اکفاری، و ما احاطوا علی بطانتی
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 559
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 559
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/559/mode/1up
    ولاؔ ظھارتی و لاسراری، و نحتوا بھتانات واکفروا و جاء وا بمفتریات کالشیاطین، لیفرط بتلک المروش الی ذم، أو یلحقنی وَصْمٌ، ولیختلبوا القلوب بمزخرفاتھم و اتراء ی فی اعین الناس من الکافرین۔ ورایت نفوسھم قد ثعطت و ثلطت و قرحت و تعفنت من حقد و غلّ و صاروا من الذین یُصعَرون و یُصلقون و یؤذون الناس بُحمۃ نطقھم و ینضنضون لسنھم کصل وما بقی فیھم من حب ولا لب کأنھم فی غیابۃ جب و من المغرقین۔
    أیھا الأعزۃ إنی دعوت قومی لیلًا و نھارًا، فلم یزدھم دعائی الا فرارًا۔ ثم انی دعوتھم جھارًا، ثم انی اعلنتُ لھم و أسر رتُ لھم اسرارًا، فقلت استغفروا ربکم واستخیروا واستخبروا وادعوا اللّٰہ فی امری یمددکم بإلھامات و یظھر علیکم اخبارا فما سمعوا کلمتی
    و أعرضوا عتوًّا واستکبارًا، و رضوا بان یکونوا لاخوانھم مکفرین۔ وما کان حجّتھم الا ان قالوا ائتوا بأحادیث شاھدۃ علی ذالک ان کنتم صادقین۔ و ھم یدرسون کتاب اللّٰہ و یجدون فیہ کل ما قلت لھم
    و یقرء ون الصحاح و یجدون فیھا ما أظھرتُ علیھم ولکن ختم اللّٰہ علی قلوبھم و کانوا قوما عمین۔ ولستُ أری أن الأحادیث کلھا موضوعۃ علی التحقیق، بل بعضھا مبنیۃ علی التلفیق، و مع ذالک فیھا اختلافات کثیرۃ، و منافات کبیرۃ، و لأجل ذلک افترقت الأمۃ، و تشاجرت الملۃ فمنہم حنبلی و شافعی و حنفی و مالکی و حزب المتشیّعین۔ و لا شک ان التعلیم کان واحدا ولکن اختلفت الاحزاب بعد ذالک
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 560
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 560
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/560/mode/1up
    فترؔ ون کل حزب بما لدیھم فرحین۔ و کل فرقۃ بنی لمذھبہ قلعۃ و لا یرید أن یخرج منھا و لو وجد أحسن منھا صورۃ و کانوا لعماس اخوانھم متحصّنین۔ فارسلنی اللّٰہ لأستخلص الصیاصی۔ واستدنی القاصی، وانذر العاصی، ویرتفع الاختلاف و یکون القرآن مالک النواصی و قبلۃ الدین۔ فلما جئتھم أکفرونی و کذّبونی و رمونی ببھتاناتٍ و إِفکٍ مبین۔ و انی اری علمھم مخسولًا۔ و جِیْد تناصفھم مغلولًا، و صُنْعَ عذراتھم مطلولا۔ واری صورھم کالممسوخین۔
    و قد بعثنی اللّٰہ فیھم حکما فما عرفونی و حسبونی من الملحدین۔ آذونی بحصائد ألسنتھم و رأیت منھم ظلمًا و ھضمًا کثیرًا و قلبوا لی الامور و ارادو ان یتخطفونی من الأرض ولکن عصمنی اللّٰہ من شرورھم و ھو خیر العاصمین۔ و رأیت کل احدمنھم مارًّا فی عشواہ و تارکًا سبیل رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم وھداہ، فقلت: ایھا الحسداء الجھلاء أسأتم فیما صنعتم، و حرَنتم فیما ظننتم۔ تجلدون للاجتلاد، وأنا تحت اتراس اللّٰہ حافظ العباد، و لن تستطیعوا ان تضرونی ولو أمحش الحقد جلودکم، و سوّد الغیظ خدودکم۔ یا حسرۃ علیکم ما أری فیکم المتضرع الخائف، خرِف التَّمْر و بقی خرائف و ما اری فیکم رائحۃ الحیٰوۃ ان انتم الا کالأموات، و ان انتم الا کمذعوفین۔ وأیم اللّٰہ لطال ما قلت لھم ألا لا تردوا مخاوف الاکفار، فانھا مقاحم الاخطار و فلوات التبار۔ تعالوا أنف ما رابکم، واستسل کل سھم نابکم فما کفّوا السنتھم
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 561
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 561
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/561/mode/1up
    وماؔ جاء ونی کتقیّ أمین۔ ثم قلت ایھا العلماء أرونی نصوص کتاب اللّٰہ لأوافقکم و أرونی أثر رسولہ لأرافقکم، فإنی ما أجد فی کتاب اللّٰہ و آثار رسولہؐ إلا موت المسیح ابن مریم۔ فارونی خلاف ذالک ان زعمتمونی من الکاذبین۔ و ان کنتم علی بیّنۃ من عند ربکم فلم لا تأتوننی بسلطان مبین۔ و ان شئتم أن تختبرونی فتعالوا عاینوا آیات صدقی أو أرونی شیئا من آیاتکم۔ فان بدا کذب فمی۔ فمزقوا أدمی، و أریقوا دمی، و إن غلبتُ
    و ظھر صدق قولی، فالیکم من حولی۔ و اتقوا اللّٰہ و لا تعتدوا امام ربکم فی العصیان، فان عینہ علی طرق الانسان۔ و ھو یری کل خطواتکم، و یعلم دقائق خطراتکم، فما لکم لا تخافونہ قد نزل اللّٰہ فی عرائکم فقوموا لہ قانتین۔ ألایمان نور البشریۃ و نور الایمان عرفان، و من فقد ھما فھو دودۃ لا إنسان۔ من عرف السر فقد عرف البر، فقوموا و تجسسوا اللُّب الذی ھو باطن الباطن و معنی المعنی و نور النور۔ و لا تفرحوا بالقشور الحیاۃ۔ الحیاۃ۔ البصارۃ۔ البصارۃ۔ و لا تکونوا کالمیتین۔ ھذا ما قلت لھم و فوضت امری الی اللّٰہ ھو ربی وجیدی تحت نیرہ۔ و اعلم انہ لا یخذلنی و لا یضیعنی و لا یجعلنی من التاءھین۔
    والآن ایھا الأعزۃ أبیّن لکم بعض حلمی و مکاشفاتی رأیت فیھا رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم بعد ما رأیتہ فی مستطرف الأیام۔ فجعلنی کالعردام و أعدّنی للاصلخمام، لأحارب الفراعنۃ
    والظالمین۔ أیھا السادۃ انی رأیتہ مرات، بعد ما وجدت منہ برکات
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 562
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 562
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/562/mode/1up
    و ؔ ثمرات، فالآن اُبیّن بعضھا لکم لعلکم تتفکرون فی أمری و لعلکم تنظرون الیّ بعین المبصرین۔ فان القوم فرّوا منی کثور الوحش و ترکوا شطاط الانسانیۃ و حزامتھا و کانوا کجذوۃ ملتھبۃ و قاموا بفدید سَبُعِیٍّ
    و طبعٍ قِذَمٍّ کوَجین۔ و ارونی سھوکۃ ریاھم، و سھومۃ محیّاھم، واتفقوا علی إیذائی و ازدرائی ببغی و طغیان، و سابقوا فی الافتراء کفرسی رھان، لکی لا یکونوا فی إخوانھم من المقرَعین۔ فلما رأیت أرضھم قفرًا وسماء ھم مصحیۃ أعرضت و جئت حضرتکم بمائی المعین۔
    أیھا الأعزۃ والسادۃ جئناکم راغبین فی خیرکم بھدیۃ فیھا لبن أثداء الأمھات الروحانیۃ فتعالوا لشربہ وأتونی ممتثلین۔ والآن ابین الرؤیا إراحۃ للسامعین۔ أیھا الکرام رأیت فی المنام کأنی فی حلقۃ ملتحمۃ و رفقۃ مزدحمۃ۔ و أبین بعض المعارف بجأش متین۔ و لسان مبین للحاضرین۔
    و رأیت أن المکان ربع لطیف نظیف ینفی التَّرَحَ رؤیتہ و یسرّ الناظرین ھیئتہ، و کنت أخال أنہ مکانی فحبذا ھو من مکان رأیت فیہ سید المرسلینؐ
    و رایت عندی رجلًا من العلماء لا بل من السفھاء جاثیا علی رکبتہ ینکر علی لغباوتہ و یکلب علی اللجاج لشقاوتہ، و رأیتہ کالحاسدین۔ فاشتد غضبی
    و قلتُ : تعسًا لھؤلاء العلماء انھم من اعداء الدین۔ فقلت ھل من امرئ یخرجہ من ھذا المقام، کاخراج الاشرار و اللئام و یطھرالمکان من ھذا القرین الضنین۔ فقام رجل من خدامی، و ھم باخراجہ من امام عینی و مقامی لیؤمننی من ذالک الظنین۔ فرایت انہ اخذہ و جعل یدفعہ و یذبہ و یذأَطہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 563
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 563
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/563/mode/1up
    من ؔ المکان، و لہ رطیط و کرب و فزع مع الاردمان حتی أُخرج فاصبح من الغائبین۔ فرفعت نظری فاذا حذتنا رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم قائم
    وکانہ کان یری کل ما وقع بیننا مواریا عیانہ۔ فأخذنی ھیبۃ من رؤیتہ
    و نھضت أستقری مکانا یناسب شأنہ، و قمت کالخادمین۔ فاذا دنوت منہ (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) و نظرت الی وجھہ فاذا وجہ قد رأیتہ من قبل۔ ما رأیت وجھًا أحسن منہ فی الدنیا فھو خاتم الحسینین و الجمیلین، کما أنہ خاتم النبیین والمرسلین۔ و رأیت فی یدہ کتابًا فاذا ھو کتابی ’’المرآۃ‘‘ الذی صنّفتہ بعد ’’البراھین‘‘۔ و کان قد وضع إصبعًا علی محل فیہ مدحہ
    و اصبعًا علی محل فیہ مدح اصحابہ و قد قیّد لَحْظَہ بھما و ھو یتبسم
    و یقول ھذا لی و ھذا لأصحابی وکان ینظر الیہ کالقارئین۔ ثم انحدرت طبیعتی الی الالھام فأشار الرب الکریم الی مقام من مقامات ’’المرآۃ‘‘۔ و قال ھذا الثناء لی ثم استیقظت‘ فالحمد للّٰہ رب العالمین۔
    و رأیت فی منام آخر کأنی صرت علیًا ابن ابی طالب رضی اللّٰہ عنہ و الناس یتنازعوننی فی خلافتی و کنت فیھم کالذی یضام و یمتھن
    و یغشاہ أدران الظنون و ھو من المبرّئین۔ فنظر النبی (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) اِلیّ و کنت أخال نفسی اننی منہ بمنزلۃ الابناء و ھو من آبائی المکرمین۔ فقال و ھو متحنن ’’یا علی دعھم و أنصارھم و زراعتھم‘‘ فعلمت فی نفسی أنہ یوصینی بصرف الوجہ من العلماء و ترک تذکرھم والإعراض عنہم و قطع الطمع والحنین من إصلاح ھؤلاء المفسدین۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 564
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 564
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/564/mode/1up
    فانھمؔ لا یقبلون الاصلاح فصرف الوقت فی نصحھم فی حکم إضاعۃ الوقت و طمع قبول الحق منھم کطمع العطاء من الضنین۔ و رأیت انہ یحبّنی و یصدّقنی و یرحم علیّ و یشیر الی أن عُکّازتہ معی و ھو من الناصرین۔ ورأیتنی فی المنام عین اللّٰہ و تیقنت أننی ھو ولم یبق لی ارادۃ
    و لا خطرۃ و لا عمل من جھۃ نفسی و صِرت کاناء منثلم بل کشیءٍ تَأَبَّطہ شیءٌ آخر و أخفاہ فی نفسہ حتی ما بقی منہ اثر و لا رائحۃ و صار کالمفقودین۔ و أعنی بعین اللّٰہ رجوع الظل إلی أصلہ و غیبوبتہ فیہ کما یجری مثل ھذہ الحالات فی بعض الاوقات علی المحبین۔ و تفصیل ذالک أن اللّٰہ إذا أراد شیءًا من نظام الخیر جعلنی من تجلّیاتہ الذاتیۃ بمنزلۃ مشیّتہ وعلمہ و جوارحہ و توحیدہ و تفریدہ لإتمام مرادہ و تکمیل مواعیدہ کماجرت عادتہ بالأبدال والأقطاب والصدیقین۔ فرأیت أن روحہ احاط علیَّ و استوی علی جسمی و لفّنی فی ضمن وجودہ حتی ما بقی منی ذرۃ وکنت من الغائبین۔ و نظرت الی جسدی فاذا جوارحی جوارحہ و عینی عینہ و أذنی أذنہ و لسانی لسانہ۔ أخذنی ربی و استوفانی وأکدالاستیفاء حتی کنت من الفانین۔ ووجدت قدرتہ و قوتہ تفور فی نفسی وألوھیتہ تتموج فی روحی و ضُربت حول قلبی سرادقات الحضرۃ و دقق نفسی سلطان الجبروت، فما بقیت وما بقی إرادتی ولامنای۔ و انھدمت عمارۃ نفسی کلھا و تراء ت عمارات رب العالمین۔ وانمحت أطلال وجودی و عفت بقایا أنانیتی و ما بقیت ذرۃ من ھویتی، والألوھیۃ غلبت علیّ غلبۃ شدیدۃً تامۃً
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 565
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 565
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/565/mode/1up
    وجُذِؔ بتُ الیھا من شعر رأسی الی أظفار أرجلی، فکنت لُبًّا بلا قشور ودُھنًا بغیر ثُفلٍ و بذور و بُوعِدَ بینی و بین نفسی فکنت کشیء لا یُری أوکقطرۃ رجعت الی البحر فسترہ البحر برداء ہ و کان تحت امواج الیم کالمستورین۔ فکنت فی ھذہ الحالۃ لا ادری ما کنت من قبل و ما کان وجودی۔ و کانت الالوھیۃ نفذت فی عروقی و أوتاری و أجزاء أعصابی و رأیت وجودی کالمنھوبین۔ وکان اللّٰہ استخدم جمیع جوارحی
    وملکھا بقوۃ لا یمکن زیادۃ علیھا فکنت من اخذہ و تناولہ کانی لم اکن من الکائنین۔ و کنت أتیقن أن جوارحی لیست جوارحی بل جوارح اللّٰہ تعالی و کنت أتخیل أنی انعدمت بکل وجودی وانسخلت من کل ھویتی والآن لا منازع و لا شریک و لا قابض یزاحم۔ دخل ربی علی وجودی وکان کل غضبی و حلمی و حلوی و مری و حرکتی و سکونی لہ و منہ و صرت من نفسی کالخالین۔ و بینما انا فی ھذہ الحالۃ کنت اقول انا نرید نظامًا جدیدًا و سماءً جدیدۃً و أرضًا جدیدۃ۔ فخلقت السماوات والأرض أولًا بصورۃ إجمالیۃ لا تفریق فیھا و لا ترتیب، ثم فرقتھا ورتّبتھا بوضع ھو مراد الحق و کنت أجد نفسی علی خلقھا کالقادرین۔ ثم خلقت السماء الدنیا و قلت انا زیّنّا السماء الدنیا بمصابیح۔ ثم قلت: الآن نخلق الانسان من سلالۃ من طین۔ ثم انحدرت من الکشف الی الالھام فجری علی لسانی: ’’اردت ان استخلف فخلقت آدم انا خلقنا الانسان فی احسن تقویم۔ و کنا کذالک خالقین‘‘۔ و ألقی فی قلبی
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 566
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 566
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/566/mode/1up
    ان ؔ اللّٰہ اذا أراد ان یخلق آدم فیخلق السمٰوات والارض فی ستۃ ایام
    و یخلق کل ما لا بد منہ فی السماء والارضین۔ ثم فی آخر الیوم السادس یخلق آدم و کذالک جرت عادتہ فی الاولین والآخرین۔ وألقی فی قلبی أن ھذا الخلق الذی رأیتہ إشارۃ الی تائیدات سماویۃ و أرضیۃ و جعل الأسباب موافقۃ للمطلوب و خلق کل فطرۃ مناسبۃ مستعدۃ للحوق بالصالحین الطیبین۔ و أُلقی فی بالی أن اللّٰہ ینادی کل فطرۃ صالحۃ من السماء و یقول کونی علی عدۃ لنصرۃ عبدی و ارحلوا الیہ مسارعین۔
    و رأیت ذلک فی ربیع الثانی سنۃ۱۳۰۹ھ فتبارک اللّٰہ اصدق الموحین۔ و لا نعنی بھذہ الواقعۃ کما یعنی فی کتب أصحاب وحدۃ الوجود و ما نعنی بذالک ما ھو مذھب الحلولیین، بل ھذہ الواقعۃ توافق حدیث النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم أعنی بذالک حدیث البخاری فی بیان مرتبۃ قرب النوافل لعباد اللّٰہ الصالحین۔
    أیھا الأعزۃ الآن اقص علیکم من بعض واقعات غیبیۃ أظھرنی ربی علیھا لیجعلھا آیات للطالبین۔ فمنھا ان اللّٰہ رأی ابناء عمی، و غیرھم من شعوب أبی و أمی المغمورین فی المھلکات، والمستغرقین فی السیئات من الرسوم القبیحۃ والعقائد الباطلۃ و البدعات۔ و رآھم منقادین لجذبات النفس واستیفاء الشھوات، والمنکرین لوجود اللّٰہ و من المفسدین۔
    و وجدھم أجھل خلقہ بما یھذب نفوسھم و أَلَدَّھم للدنیا الدنیۃ
    وأذھلھم عن ذکر الآخرۃ، و اغفلھم عن جلال اللّٰہ و سطوتہ و قھرہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 567
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 567
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/567/mode/1up
    وجوؔ دہ و امور العاقبۃ، والعاکفین علی طواغیت الرسوم، الغافلین عن عظمۃ اللّٰہ القیوم، والمنکرین للنبی المعصوم و من المکذبین۔
    و رأی أنھم یأمرون بالمنکر والشرور۔ و ینھون عن المعروف والخبر المأثور، و یطیلون الأَلسنۃ بتوھین رسول اللّٰہ (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) والاستخفاف بہ و صاروا للالحاد والارتداد من المتشمرین۔ و رأی أنھم یسعون تحت الآثام الی الآثام و لا یخافون غضب اللّٰہ الملک العلام و لا یتوبون من سب رسول اللّٰہ (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) بل کانوا علیہ من المداومین۔ و کانوا لا یحفظون فروجھم و لا یترکون دَوْرَقَھم و دُروجھم
    وکانوا علی ھجو الإسلام من المصرین۔ وکانوا یغضبون غضب السباع مع ظلمۃ المعاصی والظلم والایقاع، کأنھم سحاب رکام فیہ شغب الرعد
    والبرق و الصاعقۃ و لا یخرج قطرۃ وَدَقٍ من خلالہ فنعوذ باللّٰہ من شر المعتدین۔ و بینما ھم کذالک اذ اصطفانی ربی لتجدید دینہ، و اظھار عظمۃ نبیہ و نشر رَیّا یاسمینہ (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) و أمرنی لدعوۃ الخلق الی دین الاسلام و ملۃ خیر الانام، و رزقنی من الالھامات والمکالمات والمخاطبات والمکاشفات رزقًا حسنًا و جعلنی من المحدثین۔ فبلغ ھذا الخبر و ھذہ الدعوۃ و ھذا الدعوی ابناء عمی و کانوا أشد کفرًا باللّٰہ
    و رسولہ والمنکرین لقضاء اللّٰہ و قدرہ و من الدھریین۔ فاشتعل غضبھم حسدًا من عند انفسھم فطغوا و بغوا واستدعوا لآیات استھزاءً ا و قالوا لا نعلم اِلٰھًا یکلم أحدًا أو یقدر امرًا أو یوحی إلی رجل و ینبئ من شیء إن ھو إلا مکر
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 568
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 568
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/568/mode/1up
    مستمرؔ قد انتاب من الاولین۔ وکلہ کید و ختر و ذلاقۃُ لُسْنٍ فلیاتنا بآیۃ ان کان من الصادقین۔ و کانوا یستھزء ون باللّٰہ و رسولہ و یقولون (قاتلھم اللّٰہ) ان القرآن من مفتریات محمد (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) و کانوا من المرتدین۔
    و کان القوم کلہ معھم و لا یمنعونھم من ھذہ الکلمات و لا یراجعون، فکانوا یزیدون یومًا فیومًا فی کفرھم و طغیانھم و لم یکونوا من المزدجرین۔
    فاتفق ذات لیلۃ انی کنت جالسا فی بیتی اذ جاء نی رجل باکیًا ففزعت من بکاۂ فقلت اجاء ک نعی موت؟ قال بل أعظم منہ۔ انّی کنت جالسًا عند ھؤلاء الذین ارتدوا عن دین اللّٰہ فسب احدھم رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم سبًا شدیدًا غلیظًا ما سمعت قبلہ من فم کافر، و رأیتھم أنھم یجعلون القرآن تحت أقدامھم و یتکلمون بکلمات یرتعد اللسان من نقلھا، و یقولون ان وجود الباری لیس بشیء و ما من الہ فی العالم، إن ھو الا کذب المفترین۔ قلتُ اولم حذّرتک من مجالستھم فاتق اللّٰہ و لا تقعد معھم و کن من التائبین۔ و کذالک سدروا فی غَلَواتھم و جمحوا فی جھلاتھم و سدلوا ثوب الخیلاء یومًا فیومًا حتی بدا لھم أن یشیعوا خزعبلاتھم، و یصطادوا السفھاء بتلبیساتھم فکتبوا کتابا کان فیہ سبّ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم و سبّ کلام اللّٰہ تعالی و إنکار وجود الباری عزّ اسمہ، و مع ذلک طلبوا فیہ آیات صدقی منی و آیات وجود اللّٰہ تعالی
    و أرسلوا کتابھم فی الآفاق والأقطار و أعانوا بھا کفرۃ الھند و عتوا عتوًّا کبیرًا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 569
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 569
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/569/mode/1up
    ما ؔ سمع مثلہ فی الفراعنۃ الأولین۔ فلما بلغنی کتابہم الذی کان قد صنفہ کبیرھم فی الخبث والعمر، و رأیت فیہ سبّ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم سبّا ینشق منہ قلب المؤمنین، و تتقطع أکباد المسلمین، و رأیت فیہ کلمات الأراذل والسفھاء، و توھین الشریعۃ الغراء و ھجو کلام اللّٰہ الکریم فغضبت أسفا و نظرتُ فإذا الکلماتُ کلمات تکاد السماوات یتفطرن منھا۔ فتحدرت عبرات من مَذارف مآقی۔ و تصعدت زفراتی الی التراقی۔ و غلب علی بکاء و أنین۔ فغلّقت الابواب۔ و دعوت الرب الوھاب، و طرحت بین یدیہ و خررت امامہ ساجدًا و قرِمتُ الی نصرتہ متضرعًا و فعلتُ ما فعلتُ بلسانی و جنانی و عینای ما لا یعلمھا إلا رب العالمین۔ و قلت یا رب یا رب انصر عبدک و اخذل اعداء ک۔ استجبنی یا رب استجبنی اِلامَ یُستھزأ بک و برسولک۔ و حتام یکذبون کتابک و یسبون نبیک۔ برحمتک استغیث یا حیّ یا قیّوم یا معین۔ فرحم ربی علی تضرعاتی و زفراتی و عبراتی و نادانی و قال:’’انّی رأیت عصیانھم
    وطغیانھم فسوف أضربھم بأنواع الآفات أُبیدھم من تحت السماوات
    و ستنظر ما أفعل بھم و کنا علی کل شیء قادرین۔ إنی أجعل نساء ھم أرامل و أبناء ھم یتامی و بیوتھم خربۃ لیذوقوا طعم ما قالوا و ما کسبوا ولکن لا أھلکھم دفعۃ واحدۃ بل قلیلًا قلیلًا لعلہم یرجعون و یکونون من التوابین إن *** نازلۃ علیھم و علی جدران بیوتھم و علی صغیرھم وکبیرھم ونساءھم و رجالھم و نزیلھم الذی دخل أبوابھم۔ و کلھم کانوا ملعونین۔ الا الذین
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 570
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 570
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/570/mode/1up
    آمنوؔ ا و عملوا الصالحات و قطعوا تعلقھم منھم و بعدوا من مجالسھم فاولئک من المرحومین۔
    ھذہ خلاصۃ ما ألہمنی ربی فبلّغت رسالات ربی فما خافوا و ما صدقوا بل زادوا طغیانًا و کفرًا و ظلّوا یستھزء ون کأعداء الدین۔ فخاطبنی ربی و قال: انا سنریھم آیات مبکیۃ، و ننزل علیھم ھمومًا عجیبۃ، و امراضًا غریبۃ، و نجعل لھم معیشۃ ضنکًا و نصبّ علیھم مصائب فلا یکون لہم أحد من الناصرین۔
    فکذالک فعل اللّٰہ تعالی بھم و أنقض ظھورھم بأثقال الھموم والدیون و الحاجات، و أنزل علیھم من انواع البلایا والآفات۔ و فتح علیہم أبواب الموت والوفات، لعلھم یرجعون أو یکونون من المتنبھین۔ ولکن قست قلوبھم فما فہموا وما تنبھوا وما کانوا من الخائفین۔ و لما قرب وقت ظھور الآیۃ اتفق فی تلک الأیام أن واحدًا من أَعزّ أعزّتھم الذی کان اسمہ ’’احمد بیک‘‘ اراد ان یملک ارض اختہ التی کان بعلھا مفقود الخبر من سنین۔
    و کان ھو ابن عمی و کانت الأرض من ملکہ فمال احمد بیک أن یخلص الأرض من أیدی أختہ و یستخلصھا۔ و أن یستخرجھا من قبضتھا ثم یقتنصھا و ارادت ھی ان تھبھا و تمن علی اخیھا و کنا لھا ورثاء جمیعًا علی سواء فرضی أبناء عمی لوجہ بھذا بما کانت أختھم تحتہ و بما کانوا لہ أقربین۔ کذالک۔ نعم قد کان لی حق غالبًا علیہم و لأجل ذلک ما کان لہم ان یھبوا الارض قبل ان أرضی و أکون من الرّاضین۔ فجاء ت امرأۃ احمد بیک تطرح بین یدی لأ ترک حقی و ارضی بھذہ الھبۃ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 571
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 571
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/571/mode/1up
    و لاؔ أکون من المنازعین۔ فکدتُ ارحم علیھا و أھب الارض لھا تألیفًا لقلوبھم لعلھم یتوبون و یکونون من المھتدین۔ ثم خشیت شرالاستعجال، فی مال الغائب الذی ھو مفقود الخبر و الحال، فخوفنی تَبِعَۃُ أثمارہ و ما فیہ من الوبال۔ فاستحسنت استفتاء العلیم الحکیم، و ترقُّب اعلام الرب الرحیم لأکون بریًا من غصب حق غائب و لا أکون من ضیمی کقائب، و أخرج من الذین یظلمون شرکاء ھم و یترکونھم کخائب، و کانوا فی حقوقھم راغبین، و لا یخافون أن یأخذوھم مفاجین۔ فارتدعت عن الھبۃ ارتداع المرتاب۔
    و طویت ذکرہ کطیِّ السجلّ للکتاب، و کنت لحکم اللّٰہ من المنتظرین۔
    و کنت أظن أن ھذا یوشک ان یکون وما کدت ان اظن انھا قضیۃ قد اراد اللّٰہ بھا ابتلاء قوم کانوا من المعتدین، الذین غلبت علیہم المجون والخلاعۃ والإباحۃ والدھریۃ والتحقوا بالکفار بل کانوا أشد کفرا منہم و کانوا قومًا فاسقین۔ فقلت لامرأۃ احمد بیک ما کنت قاطعًا أمرا حتی أوامر اللّٰہ تعالی فیہ فارجعی الی خدرک و بلّغی ما سمعتِ أبا عذرک، و ستجدیننی ان شآء اللّٰہ من المخلصین۔ فذھبت ، و أتی بعلھا یسعی، فألح علیّ کالمضطرین
    و کان یخبط کخبط المصابین حتی أبکاہ کربتہ۔ و ذوت سکینتہ۔ وفاء الی التضرع والاقشعرار، و کان احشاء ہ قد التھبت بطوی العقار، و کان یتنفس کالمخنوقین۔ ووجدتہ بوجدہ المتھالک کأنّ الہم سیجد لہ و الغم یفیح دمہ و یصول علیہ الحزن کمغتالین۔ فلما رأیت صَغْوَہ و حزنہ قد بلغ مراتب کمالہ، أخذنی التحنن علی حالہ، وأشفقت علی عینہ و مبکاھا و قصدت ان أریہ ید النصرۃ و جدواھا و عدواھا فأسرعت الی تسلیتہ کالمواسین۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 572
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 572
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/572/mode/1up
    فقلتؔ لہ واللّٰہ ما زاغ قلبی وما مال، و ما انا من الذین یحبون المال، بل من الذین یتذکرون المآل والآجال، و لست شحیحا علی النعم کالذین ھم کالنَّعم، و إننی أرحم علیک وسأُحسن الیک وأعلم أن انفس القربات تنفیس الکربات، وأمتن اسباب النجاۃ، مواساۃ ذوی الحاجات، و کنت لنصرتک من المتأھبین۔
    ولکن ایم اللّٰہ لقدعاھدت اللّٰہ علی اننی لا أمیل إلی أمرٍ فیہ شبھۃ، و لا أضع قدما فی موضع فیہ زلۃ و لا أتلوا المتشابھات حتی أوامر ربی فیھا فالآن أفعل کذلک و أرجو من اللّٰہ خیرًا فلا تکونن من القانطین۔ و إنّی أری ان المؤامرۃ أقرب للتقوی لأن الوارث مفقود و ما نتیقن أنہ مات أو ھو حی موجود فلا یجوز ان یستعجل فی مالہ کمال المیتین۔ فالأولی ان تقصر عن القیل والقال، حتی اوامر ربّی عالم الغیب ذالجلال، وأستقری سبل الیقین۔ قال ما منی خلاف، فلا یکن لو عدک إخلاف۔ قلت کل وعدی مشروط بأمر رب العالمین۔ فذھب و کان من وجدہ الذی تیمّہ کالمعتلّین۔ فتیمّمت حجرتی، والتزمت زاویۃ بقعتی، أ تجشم الی اللّٰہ تعالی لیظھر علیّ امرہ، و یفلق حب الحقیقۃ من نواتھا و یُری لبّ الأمر
    و قشرہ۔ فواللّٰہ ما امسکت ریثما یعقد شسع او یشدّ نسع۔ اذا الوسن اسری إلی آماقی، و أُلھمتُ من اللّٰہ الباقی، و أنبئت من أخبار ما ذھب و ھلی قط الیھا و ما کنت الیھا من المستدنین۔ فأوحی اللّٰہ إلیّ أن أخطب صبیتہ الکبیرۃ لنفسک، و قل لہ: لیصاھرک أولًا ثم لیقتبس من قبسک، و قل إنی أمرت لأھبک ما طلبتَ من الارض و أرضًا أخری معھا و أحسن إلیک
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 573
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 573
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/573/mode/1up
    بإحسانات أخری علی أن تنکحنی إحدی بناتک التی ھی کبیرتھا و ذالک بینی و بینک فإن قبلت فستجدنی من المتقبلین۔ و إن لم تقبل فاعلم أن اللّٰہ قد أخبرنی أن انکاحھا رجلا آخر لا یبارک لھا ولا لک فإن لم تزدجر فیصب علیک مصائب و آخر المصائب موتک فتموت بعد النکاح الی ثلاث سنین، بل موتک قریب و یرد علیک و انت من الغافلین۔ و کذالک یموت بعلھا الذی یصیر زوجھا الی حولین و ستۃ اشھر، قضاءً من اللّٰہ فاصنع ما انت صانعہ و انّی لک لمن الناصحین۔ فعبس و تولّٰی وکان من المعرضین۔ ثم کتبت الیہ مکتوبا بایماء منانی، و إشارۃ رحمانی، و نمقت فیہ: بسم اللّٰہ الرحمن الرحیم أما بعد فاسمع ایھا العزیز ما لک اتخذت جدّی عبثا، و حسبتَ تبری خبثا، وواللّٰہ ما أرید أن أشق علیک و ستجدنی انشاء اللّٰہ من المحسنین۔ و ھا أنا اکتب بعھد موثق فانک إن قبلتَ قولی علی رغم أنف قبیلتی فأفرض لک حصّۃ فی أرضی و خمیلتی، و یرتفع الخلاف والنزاع بھذہ الوصلۃ من بیننا و یصلح اللّٰہ قلوب شعبی و عشیرتی، و فی کل منیتک اقتفی صَغْوَک و أزیل قشفک فتکون من الفائزین لا من الفائزین۔
    والحق والحق اقول انی اکتب ھذا المکتوب بخلوص قلبی و جنانی، فان قبلت قولی و بیانی، فقد صنعت لطفًا الیّ، و کان لک احسانا علیّ، و معروفا لدی فأشکرک وأدعو زیادۃ عمرک من أرحم الراحمین۔ و إنی أقیم معک عھدی، أنی أعطی بنتک ثلثًا من ارضی و من کل ما ملکتہ یدی، و لا تسألنی خطۃ الا أعطیک إیاھا وا نی من الصادقین۔ ولن تجد مثلی فی رعایۃ الصلۃ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 574
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 574
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/574/mode/1up
    و ؔ مودۃ الاقارب و حقوق الوصلۃ و تجدنی ناصر نوائبک و حامل أثقالک فلا تضیّع و قتک فی الاباء ولا تستنکر حبک ولا تکونن من الممترین۔ وھا أنا کتبت مکتوبی ھذا من امر ربی لا عن امری فاحفظ مکتوبی ھذا فی صندوقک فانہ من صدوق امین۔ واللّٰہ یعلم اننی فیہ صادق و کل ما وعدت فھو من اللّٰہ تعالی و ما قلت اذ قلت ولکن انطقنی اللّٰہ تعالی بالھامہ، و کانت ھذہ وصیۃ من ربی فقضیتھا ما کان لی حاجۃ الیک و الی بنتک وما ضیق اللّٰہ علی والنساء سواھا کثیرۃ واللّٰہ یتولی الصالحین۔ فلا تنظر الی مکتوبی بعین الارتیاب، فانہ کتبتہ بإمحاض النصح والتزام الصدق و الصواب، ودع الجدال وانتظر الآجال، فان مضی الأجل وما حصحص الصدق فاجعل حبلًا فی جیدی و سلاسلا فی أرجلی و عذبنی بعذاب لم یعذب بہ احد من العالمین۔ کنتم قد طلبتم آیۃ من ربی فھذہ آیۃ لکم انہ یا خذ المنکرین من مکان قریب و یختار ما کان أقرب التعذیبات فی حقھم و أدنی من أفھامھم و أشد أثرا فی أعراضھم
    وأجسامھم لیری المحتالین ضعفھم و یکسر کبر الضائمین۔ ھذا ما کتبت إلی احمد بیک فی سنۃ ۱۳۰۴‘ فأعرض و أبی و سکت و بکت وعاف وُصْلتی و صلتی و ضاق ذرعًا من نمیقتی و کان من المعادین۔ و معہ عادانی قومہ و عشیرتہ الذین کانوا أقربین۔ و کانوا یعافون أنٍ یزوّجوا بناتھم أقارب مثلی أو یزوّجوا امراءً تحتہ امرأۃ أخری۔ و کانت بنتہ ھذہ المخطوبۃ جاریۃ حدیثۃ السن عذراء و کنت حینئذٍ جاوزت الخمسین۔ و کان جذوۃ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 575
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 575
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/575/mode/1up
    المعاؔ دات متطایرۃ و نارھا ملتھبۃ، فزین القدر لنصبہ و وصبہ ھذہ الموانع فی عینیہ فصار من المرتدعین۔ و کان یعلم صدقی و عفتی وباللّٰہ ثقتی و مقتی، و لکن غلبت علیہ الشقوۃ وأنساہ عاھتہ نباھتی فکان من المنکرین المعرضین۔ و ما عرانی حزن من ذلک الانکار، بل فرحت فرحۃ المطلق من الاسار، و ھزۃ الموسر بعد الاحسار، و کنت کتبتُ الیہ بایماء اللّٰہ القھار، فعلمت ان اللّٰہ أتم حجتہ علیہ و علی عشیرتہ و لم یبق لہ الاعتذار، و علمتُ أنہ سیجعل کلماتی حسراتٍ علی قلوبھم فسیذکرونھا باکین۔ ثم غلب قلبہ ذعرو ضجر و فجعہ إلھامی فمکث خمس سنین لا یزوج احدًا بنتہ و لا یخطب خیفۃ من وعید اللّٰہ
    و صار کالمتشحطین۔ فلما أنکحھا فما مضی علیہ الا قریبا من ستۃ أشھر إلا و قد أخذہ اللّٰہ و سلط علیہ داءً کالأرضۃ و فوضہ الی قبضۃ المرضۃ و عرکۃ الوعکۃ الی ان اذھب حواسَّہ الأنف، واستشفہ التلف حتی نضی عنہ قدر اللّٰہ ثوب المحیا و سلمہ الی ابی یحیی و مات بمیتۃٍ محسرۃ و نارٍ تطلع علی أفئدۃٍ و رحل بالکربۃ والغم الغابر و کم حسرات فی بطون المقابر، و ان فی ھذ لَآیات للمنکرین۔
    و عرا أھلہ و أقاربہ ضجرو مصیبۃ، کانوا یضربون وجوھہم من وبال الدُّرَخْمین و ھم الذین کانوا یقولون ما نعلم ما اللّٰہ، ان ھی الاحیاتنا الدنیا نموت و نحیا و ما نحن بمبعوثین۔ فوجدوا وجدًا عظیما لفوت لقیاہ، و انقطاع سقیاہ و بما رأوا ان الالھام قد أری سناہ، و تراء ت من کشف ساقہ ساقاہ، و ظھرت من بدء أمرہ منتہاہ، فکانوا مع حزنھم متخوّفین۔ ما تمضمضت مقلتہم بنومہا فی تلک الایام، ولا تمخضت لیلتھم عن یومھا لغلبۃ ھذا الظلام، و احلھم نزیل المصائب فأحضروہ شواۃ الکبد و ماء الأنین۔ فلما بلغہم نعیُ الحمام، و وعیُ اللاطمات علی وجوھھم
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 576
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 576
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/576/mode/1up
    واؔ لحاطمات ھامھم بذکر الراحل عن المقام، انثالوا الی عقوتہ موجفین، و الی دویرتہ الخریبۃ موفضین۔ فأسالوا الغروب، و عطّوا الجیوب و صکوا الخدود و شجوا الرؤوس و کانت النساء قلن فی نیاحتہم قد اصبح الیوم عدونا الذی انبأنا قبل الوقت من الصادقین۔ فتفکروا أیھا الطلاب أھذا أضغاث أحلام أھذا افتراء انسان واسألوا أھل المتوفی الذین یتندمون فی أنفسھم و یبکون علی میتھم و یقولون: یا ویلنا انا کنا خاطئین۔ و ھنّأنی ربّی و قال ’’انا مھلکو بعلھا کما اھلکنا أباھا و رادّوھا الیک۔ الحق من ربک فلا تکونن من الممترین۔ وما نؤخّرہ الا لأجل معدود قل تربصوا الأجل و إنی معکم من المتربصین۔ و اذا جاء وعدالحق أھذا الذی کذبتم بہ ام کنتم عمین۔‘‘ ھذا ما بشرتُ من ربی فالحمد للّٰہ رب العلمین۔
    و رأیت فی منام کأنی قائم فی موطن و فی یدی سیف مسلول، قائمہ فی أکفی و طرفہ الآخر فی السماء و لہ برق و لمعان یخرج منہ نور کقطرات متنازلۃ حینا بعد حین۔ و إنی اضرب السیف شمالًا و جنوبًا
    و بکل ضربۃ أقتلُ ألوفًا من اعداء الدین۔ و رأیت فی تلک الرؤیا شیخا صالحًا اسمہ عبد اللّٰہ الغزنوی و قد مات من سنین، فسألتہ عن تأویل ھذہ الرؤیا، فقال اما السیف فہی الحجج التی اعطاک اللّٰہ و نصرک بالدلائل
    والبراھین۔ و اما ضربک ایاہ شمالا و جنوبًا فھو إراء تک آیات روحانیۃ سماویۃ و أدلۃ عقلیۃ فلسفیۃ للمنکرین۔ وأما قتل الاعداء فھو إفحام المخاصمین،
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 577
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 577
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/577/mode/1up
    و اؔ سکاتھم منھا۔ ھذا تأویل رؤیاک و انت من المؤیدین۔
    و قد کنت فی أیامی التی کنت فی الدنیا أرجو و أظن أن یخرج رجل بھذہ الصفات و ما کنت أستیقن انہ انت و کنت عن أمرک من الغافلین۔
    و منھا أن اللّٰہ بشرنی و قال: سمعت تضرعاتک ودعواتک وانی معطیک ما سألت منی وانت من المنعمین۔ و ما أدراک ما أعطیک آیۃ رحمۃٍ و فضلٍ و قربۃٍ و فتحٍ و ظفرٍ فسلام علیک انت من المظفرین۔ انا نبشرک بغلام اسمہ عنموایل * و بشیر۔ انیق الشکل دقیق العقل و من المقربین۔ یأتی من السماء والفضل ینزل بنزولہ۔ و ھو نور و مبارک و طیب و من المطھرین۔ یُفشی البرکات و یغذی الخلق من الطیبات و ینصر الدین۔
    و یسمو و یعرج و یرقی و یعالج کل علیل و معرضی و کان بأنفاسہ من الشافین و انہ آیۃ من آیاتی، و عَلَمٌ لتائیداتی لیعلم الذین کذبوا أنی معک بفضلی المبین، و لیجئ الحق بمجیۂ و یزھق الباطل بظھورہ
    و لیتجلی قدرتی و یظھر عظمتی و یعلوا الدین و یلمع البراھین، ولینجو طلاب الحیات من أکف موت الایمان والنور، و لیبعث اصحاب القبور من القبور، و لیعلم الذین کفروا باللّٰہ و رسولہ و کتابہ أنھم کانوا علی خطأ و لتستبین سبیل المجرمین۔ فسیعطی لک غلام ذکی۱؂ من صلبک و ذریتک و نسلک و یکون من عبادنا الوجیھین۔ ضیف جمیل یاتیک من لدنا۔ نقی من کل درن و شین۔ و شنار و شرارۃ
    و عیب و عار و عرارۃ۔ و من الطیبین۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 578
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 578
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/578/mode/1up
    و ھوؔ کلمۃ اللّٰہ۔ خُلق من کلمات تمجیدیۃ۔ و ھو فھیم و ذھین و حسین قد ملئ قلبہ علمًا، و باطنہ حلمًا، و صدرہ سلمًا، و اعطی لہ نفسٌ مسیحی و بورک بالروح الأمین۔ یوم الا ثنین۔ فواھا لک یا یوم الاثنین، یأتی فیک أرواح المبارکین۔ ولد صالح کریم ذکی مبارک مظھر الاول والآخر۔ مظھر الحق
    والعلا کأن اللّٰہ نزل من السماء۔ یظھر بظھورہ جلال رب العلمین۔ یأتیک نور ممسوح بعطر الرحمٰن، القائم تحت ظل اللّٰہ المنان۔ یفک رقاب الأساری و ینجی المسجونین۔ یعظم شأنہ، و یرفع اسمہ و برھانہ، و ینشر ذکرہ و ریحانہ الی اقصی الارضین۔ امام ھمام، یبارک منہ أقوام، و یأتی معہ شفاء و لا یبقی سقام،
    و ینتفع بہ أنام، ینمو سریعًا سریعًا کانہ عردام، ثم یرفع الی نقطتہ النفسیۃ التی ھی لہ مقام۔ وکان امرًا مقضیًا قدرہ قادر علام۔ فتبارک اللّٰہ خیر المقدرین۔*
    و رأیت فی المنام کأنی اسرجتُ جوادی لبعض مرادی۔ وما أدری أین تأھّبی
    وأیّ أمر مطلبی و کنت احس فی قلبی انّنی لأمر من المشغوفین۔ فامتطیت أجردی باستصحاب بعض السلاح متوکلًا علی اللّٰہ کسنۃ اھل الصلاح، و لم اکن کالمتباطئین۔ ثم وجدتنی کأنی عثرت علی خیل قصدوا متسلحین داری لاھلاکی
    و تباری، وکأنھم یجیؤن لإضراری منخرطین۔ وکنتُ وحیدًا و مع ذالک رأیتنی أنی لا أ لبس من خوذ، غیر عُدَدٍ وجدتہا من اللّٰہ کعوذ، و قد أنفت أن أکون من القاعدین والمتخلفین الخائفین۔ فانطلقت مجدًا الی جھۃ من الجہات، مستقریًا إربی الذی کنت
    قد اخبر رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ان المسیح الموعود یتزوّج و یولد لہ۔ ففی ھذا اشارۃ الی ان اللّٰہ یعطیہ ولدًا صالحًا یشابہ اباہ و لا یأباہ و یکون من عباد اللّٰہ المکرمین۔ والسر فی ذالکؔ ان اللّٰہ لا یبشر الانبیاء والاولیاء بذریۃٍ الّا اذا قدر تولید الصالحین۔ و ھذہ ھی البشارۃ التی قد بُشرت بھا من سنین و من قبل ھذہ الدعوی لیعرفنی اللّٰہ بھذا العلم فی اعین الذین یستشرفون و کانوا للمسیح کالمجلوذین۔ و أما دفن المسیح فی قبر رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کما جاء فی الحدیث فھذا سرّ معکوم و رمز مختوم لا یعرفہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 579
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 579
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/579/mode/1up
    أحسبہؔ من أکبر المہمات و اعظم المثوباتفی الدنیا والدین، اذ رأیت ألوفاً من الناس۔
    فارسین علی الأفراس، یأتون الیّ متسارعین۔ ففرحت برؤیتہم کالخباس، و وجدت فی قلبی حولا للجحاس، و کنت اتلوھم کتُلُوّ الصیادین۔ ثم أطلقت الفرس علی آثارھم، لادرک من فص أخبارھم، و کنت اتیقن اننی لمن المظفرین۔ فدنوتُ منہم فاذاھم قوم دروس البزّۃ کریہ الھیءۃ میسمہم کمیسم المشرکین۔ ولباسہم لباس الفاسقین، ورأیتھم مطلقین أفراسہم کالمغیرین و کنت اقیّد لحظی باشباحھم کالرائین۔ و کنت اُسارع الیہم کالکُماۃ، و کان فرسی کانہ یزجیہ قائد الغیب کازجاء الحمولات بالحداۃ، و کنت علی طلاوۃ إقدامہ کالمستطرفین۔ فما لبثوا أن رجعوا متد ھد ھًاالی خمیلتی۔ لیزاحموا حولی وحیلتی، و لیتلفوا ثماری و یزعجوا أشجاری،ولیشنّوا علیھا الغارات کالمفسد ین۔ فأوحشنی دخولھم فی بستانی و اد ھشت باغراقھم و ولوجھم فیھا فضجرت ضجرًا شدیدًا و قلق جنانی و شھد توسمی انھم یریدون ابادۃ أ ثماری و کسر أغصانی فبادرتُ الیھم و ظننت أن الوقت من مخاشی اللّاواء، و صارت أرضی موطن الأعداء، و أوجست فی نفسی خیفۃً کالضعیفین المزء و دین۔ فقصدت الحدیقۃ لأفتش الحقیقۃ۔ فلما دخلت حد یقتی و استشرفت بتحدیق حدقتی، واستطلعت طلع مقامہم رأیتہم من مکان بعید فی بحبوحۃ بستانی ساقطین مصروعین کالمیتین ۔ فأفرخ کربی و آمن سربی، و بادرت الیہم جذلًا و بأقدام الفرحین۔
    بقیہ حاشیہ: الا الذین یعلمون من ربھم من الملہمین المعزّزین۔ وحقیقتہ ان اللّٰہ تعالی قد جعل قبر نبیہ مقرونا بالجنۃ فھما صنوان من شجرۃ نورالحق لا ینفک احدھما من الآخر و قرابان للمعاتٍ مخفیۃ واصلۃ الی الواصلین۔ و قد جرت عادۃ اللّٰہ تعالی انہ یُدنی قبر رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم من المؤمن المتوفی کما یدنی الجنۃ رزقًا منہ و ھو خیر الرازقین۔ فاذا مات عبدٌ لہ قرب و مصافات باللّٰہ تعالی فیدنی من قبر رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم و من الجنۃ بقدر ھذا القرب و المصافاۃ فی الدین۔ فالذی ھو اشد قربًا و مصافاۃ ھو اشد قربا بقبر رسول اللّٰہ کأنہ داخل فیہ و ضجیع خاتم النبیین فخذ ھذہ التمرۃ، و ایاک والجمرۃ۔ واعلم أن المسیح قد أنزل علی ھذہ الارض کما خرج فیھا الدجال فلا تکن من المشائمین۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 580
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 580
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/580/mode/1up
    فلماؔ دنوتُ منھم وجدتھم أصبحوا فرسی کموت نفس واحد میتین ذلیلین مقھورین۔ سلخت جلودھم، و شجّت رء وسھم و ذعطت حلوقھم وقطعت أیدیھم و أرجلھم و صرعوا کالممزقین، واغتیلوا کالذین سقط علیھم صاعقۃ فکانوا من المحرقین۔ فقمت علی مصارعھم عند التلاقی،
    وعبراتی یتحدرن من مآقی۔ و قلت یا رب روحی فداء سبیلک لقد تبت علیّ و نصرت عبدک بنصرۃٍ لا یوجد مثلہ فی العالمین۔ رب قتلتھم بأیدیک قبل ان قاتل صِرْعَان، و حارب حتنان، و بارز قتلان، تفعل ما تشاء و لیس مثلک فی الناصرین۔ انت انقذتنی و نجیتنی وما کنت أن أُنجی من ھذہ البلایا لو لا رحمتک یا ارحم الراحمین۔ تم استیقظت وکنت من الشاکرین المنیبین، فالحمد للّٰہ رب العالمین۔ و اوّلت ھذہ الرؤیا الی نصرۃ اللّٰہ و ظفرہ بغیر توسط الأیدی والأسباب، لیتمّ علی نعماء ہ
    و یجعلنی من المنعمین۔ والآن أبین لکم تاویل الرؤیا لتکونوا من المبصرین۔ فاما شج الرؤس و ذَعط الحلوق فتأویلہ کسر کبر الاعداء و قصم ازدھاۂم وجعلھم کالمنکسرین۔ و أما تقطیع الأیدی فتاویلہ إزالۃ قوۃ المبارات والممارات و اعجازھم و صدھم عن البطش و حیل المقاومات، و انتزاع اسلحۃ الھیجاء منھم وجعلھم مخذولین مصدودین۔ و اما تقطیع الأرجل فتأویلہ إتمام الحجۃ علیھم و سد طریق المناص و تغلیق أبواب الفرار و تشدید الإلزام علیھم وجعلھم کالمسجونین۔ و ھذا فعل اللّٰہ الذی قادر علی کل شیءٍ یعذب من یشاء، و یرحم من یشاء، و یھزم من یشاء،
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 581
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 581
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/581/mode/1up
    و ؔ یفتح لمن یشاء وما کان لہ احد من المعجزین۔ إن الذین کذبوا رسلہ و آذوا عبادہ و کفروا بآیات اللّٰہ و لقاۂ اولئک یئسوا من رحمتہ وارداھم ظنھم۔
    و اھلکھم کبرھم، فحبطت اعمالھم و صاروا ھالکین۔ یا أیھا الذین آمنوا اتقوا اللّٰہ و لا تتخلفوا عن داعی اللّٰہ و کونوا مع الصادقین۔ لقد ابلغتکم رسالۃ ربی و نصحت لکم فکیف آسی علی قوم لا یحبون الناصحین۔
    ذکر بعض الانصار شکرًا لنعمۃ اللّٰہ الغفار
    ما زلتُ مذ أُمِرتُ من حضرۃ الرب و أُحییت من الحی ذی العجب أَحنّ إلی عیان أنصار الدین، و لا حنین العطشان الی الماء المعین
    و کنت أصرخ فی لیلی و نھاری و أقول یا رب من أنصاری یا رب من أنصاری إنی فرد مھین۔ فلما تواتر رفع یدالدعوات، وامتلأ منہ جوّ السمٰوات۔ أجیب تضرعی، و فارت رحمۃ رب العالمین۔ فأعطانی ربی صدیقا صدوقا، ھو عین أعوانی، و خالصۃ خلصانی، و سلالۃ احبائی*
    و من الاحباء فی اللّٰہ منشی زین الدین محمد ابراھیم بمبء، والمولوی غلام امام منی پوری۔ و حبی فی اللّٰہ المولوی غلام حسن پشاوری، و محی الدین الشریف تونتی کورن، والسردار محمد ولایت خان المدراسی،
    و حبی فی اللّٰہ السید النجیب المولوی محمد أحسن، و حبی فی اللّٰہ المولوی عبدالکریم السیالکوتی سلمہ اللّٰہ الذی ایّدنی و اَمدّنی فی ترجمۃ مکتوبی ھذا و ھو من المحبین المخلصین، و ھو فی ھذہ الایام عندی۔ کان
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 582
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 582
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/582/mode/1up
    فیؔ الدین المتین۔ اسمہ کصفاتہ النورانیۃ نورالدین ھو بھیروی مولدًا
    و قرشی فاروقی نسبًا، من سادۃ الاسلام و من ذریۃ النجیبین الطیبین۔ فوصلتُ بوصولہ الی الجذل المفروق، واستبشرت بہ کاستبشار السید (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) بالفاروق، و لقد أَنیستُ احزانی، مذ جاء نی و لقّانی، و وجدتہ فی سبل نصرۃ الدین من السابقین۔ و ما نفعنی مال أحد کمالہ الذی آتاہ لوجہ اللّٰہ و یؤتی من سنین۔ قد سبق الأقران فی البراعۃ والتبرع
    لھوی ملاقاتی واستحسان مقاماتی أرغب فی الاغتراب واستعذب السفر الذی ھو قطعۃ من العذاب فجزاہ اللّٰہ وثبتہ علی سبیل الصدق والصواب و رحمہ
    و ھو خیرالراحمین۔ ومنھم میرزا خدا بخش و ھو فی ھذہ الایام عندی شاب صالح مخلص شرح اللّٰہ صدرہ لحبی و أترع ذیلہ من ثمرات الاخلاص، و ثبتہ مع الثابتین۔ و منھم حبی فی اللّٰہ الحکیم فضل الدین البھیروی، و حبی فی اللّٰہ الشیخ رحمۃ اللّٰہ الکجراتی۔ و حبی فی اللہ السید أمیر علی شاہ و السید حامد شاہ و حبی فی اللہ المنشی غلام القادرالمعروف بالفصیح السیالکوتی۔ و حبی فی اللّٰہ النواب محمد علی خان رئیس مالیر کوتلہ، و حبی فی اللّٰہ السید محمد تفضل حسین اتاوی۔ وحبی فی اللّٰہ السید الھادی۔ وحبی فی اللّٰہ محمد خان۔ والمنشی محمد ارورا۔ والمنشی ظفر احمد کفورتلوی، و حبی فی اللّٰہ المولوی محمد مردان علی والمولوی محمد مظھر علی حیدر آبادی۔ و حبی فی اللّٰہ المولوی برھان الدین الجھلمی۔ وحبی فی اللّٰہ میر ناصر نواب الدھلوی، و حبی فی اللّٰہ القاضی ضیاء الدین قاضی کوتی۔ وحبی فی اللّٰہ المولوی السید محمد عسکری خان
    و حبی فی اللّٰہ القاضی غلام المرتضی، وحبی فی اللّٰہ عبدالحکیم خان، و حبی فی اللّٰہ رشید الدین خان، و حبی فی اللّٰہ السید خصلت علی شاہ، و حبی فی اللّٰہ المنشی رستم علی۔ وحبی المنشی عبداللّٰہ السنوری والمیرزا محمد یوسف بیک السامانوی و المنشی محمد حسین المراد آبادی، والقاضی خواجہ علی اللد ھیانوی۔ ھولاء من احبائی منھم من قصصنا و منھم من لم نقصص و کلھم من المخلصین۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 583
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 583
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/583/mode/1up
    و اؔ لجدوی، و مع ذالک حلمہ أرسخ من رضوی۔ نبذ العُلَقَ للّٰہ تعالی
    و جعل کل اھتشاشہ فی کلام رب العالمین۔ رأیت البذل شرعتہ، والعلم نُجْعتہ، والحلم سیرتہ، والتوکل قوتہ، ومارأیت مثلہ عالمًا فی العالمین، ولا فی خُلق مملاق من المنعمین، و لا فی اللّٰہ و للّٰہ من المنفقین۔ وما رأیت عبقریًا مثلہ مذ کنت من المبصرین۔ و لما جاء نی و لاقانی ووقع نظری علیہ رأیتہ آیۃ من آیات ربی وأیقنت انہ دعائی الذی کنت اداوم علیہ و أُشرب حسی و نبّأنی حدسی انہ من عباد اللّٰہ المنتخبین۔ و کنت أکرہ مدح الناس و حمدھم و بث شمائلھم خوفا من انہ یضر انفسھم، ولکننی أری أنہ من الذین انکسرت جذباتھم النفسیۃ و أزیلت شھواتھم الطبعیۃ و کان من اآامنین۔ و من آیات کمالہ أنہ لمارأی جروح الاسلام، ووجدہ کالغریب المستھام، أوکشجر أُزعج من المقام،أشعرھمًّا وانکدرعیشہ غمًّا وقام لنصرۃ الدین کالمضطرین۔ و صنف کتبًا احتوت علی إفادۃ المعانی الوافرۃ و انطوت علی الدقائق المتکاثرۃ، ولم یسمع مثلھا فی کتب الاولین۔ عباراتھا من رعایۃ الإیجاز مملوّۃ من الفصاحۃ، والفاظھا فی نھایۃ الرشاقۃ والملاحۃ، تسقی شرابا طھورا للناظرین۔ و مثل کتبہ کحریر یضمَّخ بعبیر، ثم یُلفّ فیہ من درر و یواقیتَ و مسک کثیر، ثم یُرتَن فیہ العنبر و یجعل کلہ کالعجین۔
    ولا شک انھا جامعۃ ما تفرق فی غیرھا من الفوائد، فاقت ماعداھا لکثرۃ ما حواھا من الشوارد والزوائد، و لجذب القلوب بحبال الأدلۃ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 584
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 584
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/584/mode/1up
    و ؔ البراھین۔ طوبی لمن حصّلھا وعرفھا وقرأھا بإمعان النظر فلا یجد مثلھا من معین۔ و من اراد حلَّ غوامض التنزیل، واستعلام اسرار کتاب الرب الجلیل، فعلیہ بالاشتغال بھذہ الکتب وبالعکوف علیھا فإنھا کافلۃ بما یبغیہ الطالب الذھین۔ یصبی القلوب أریج ریحانھا، والثمرات مستکثرۃ فی اغصانھا، ولا شک انھا جنۃ قطوفھا دانیۃ لا یُسمع فیھا لاغیۃ نُزُلٌ للطیّبین۔ منھا ’’فصل الخطاب لقضایا اھل الکتاب‘‘۔ و منھا ’’ تصدیق البراھین‘‘۔ تناسق فیھا جزیل المعانی مع متانۃ الالفاظ ولطافۃ المبانی، حتی صارت أسوۃ حسنۃ للمؤلفین،
    و یتمنی المتکلمون أن ینسجوا علی منوالھا وترنمت بالثناء علیھا ألسنۃ النِحْریرین۔ جواھرھا تفوق جواھرالنحور،و دررھا فاقت درر البحور، و إنھا أحسم دلیل علی کمالاتہ، وأقطع برھان علی ریّا نفحاتہ، و ستعلمون نبأھا بعد حین۔
    قد شمر المؤلف الفاضل فیھا لتفسیر نکات القرآن عن ساق الجد والعنایۃ، واعتنی فی تحقیقہ باتفاق الروایۃ والدرایۃ فواھًا لھممہ العالیۃ، وأفکارہ الوقادۃ المرضیۃ۔ فھو فخرالمسلمین۔ ولہ ملکۃ عجیبۃ فی استخراج دقائق القرآن، و بثّ کنوز حقائق الفرقان، و لا شک انہ ینور من انوار مشکٰوۃ النبوۃ، و یأخذ نورًا من نورالنبی (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) بمناسبۃ شان الفتوۃ، و طھارۃ الطین۔امرؤ عجیب وفتی غریب، تتفجر انھار انوار الاسرار بلمحۃ من لمحاتہ و تتدفق مناھل الافکار
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 585
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 585
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/585/mode/1up
    برَؔ شْحۃٍ من رشحاتہ، و ھذا فضل اللّٰہ یھب لمن یشاء و ھو خیر الواھبین۔ لا ریب فی أنہ نخبۃ المتکلمین، و زبدۃ المؤلفین۔ یشرب الناس من عباب زلالہ، و یشتری کشراب طھور قواریر مقالہ، ھو فخرالبررۃ والخِیَرۃ
    و فخر المؤمنین۔ فی قلبہ أنوار ساطعۃ من اللطائف والدقائق، والمعارف والحقائق، والأسرار و أسرار الأسرار و لمعات الروحانیین۔ إذا تکلم بکلماتہ النظیفۃ الطیبۃ، و ملفوظاتہ البدیعۃ المرتجلۃ المبتکرۃ فکأنہ یصبی القلوب والأرواح بالأغانی اللطیفۃ، والمزامیر الداؤدیۃ الذفیفۃ،
    و یجیء بخارق مبین۔ یخرج الحکمۃ من فمہ عند سرد الحدیث و سوق الکلام کانھا عبب مندفقۃ متوالیۃ متصاعدۃ الی افواہ السامعین۔ و إنی قد اطلقتُ أجرد فکری الی کمالاتہ فوجدتہ وحید الدھر فی علومہ و أعمالہ و برّہ و صدقاتہ و انہ لَوْ ذَعِیٌّ أَلْمَعِیُّ نخبۃ البررۃ، و زبدۃ الخیرۃ۔ أعطی لہ السخاء و المال، و عُلّقت بہ اآامال، فھو سید خدم الدین، و انی علیہ من الغابطین۔ ینزل اھل اآامال بساحتہ، و یستنزلون الراحۃ من راحتہ فلا یلوی عذارہ عمن ازدارہ و أَمّ دارہ، و ینفح بعرفہ من وافاہ من المملقین۔
    وھو یجد للُقیانی بکمال میل الجنان، کوَجْد المثری بالعقیان، یأتیمن بلاد نازحۃ علی أقدام المحبۃ والیقین۔ فتی طیب القلب یحبّناو نحبّہ یسعی إلینا بجھد طاقۃ و لو وجد فواق ناقۃ۔ انثال اللّٰہ علیہ من جوائز المجازات ووصائل الصلات، و أید ببقاۂ الاسلام والمسلمین۔ لہ بقلبی عُلَقٌ عجیبۃ وقلبہ نفوح غریبۃ۔ یختار فی حبی انواع الملامۃ والتعنیف، و مفارقۃ المألف
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 586
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 586
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/586/mode/1up
    والأؔ لیف۔ و یتسنّی لہ ھجر الوطن لسماع کلامی، و یدع التذکر للمعاھد لحبّ مقامی۔ و یتبعنی فی کل أمری کما یتبع حرکۃ النبض حرکۃ التنفس و اراہ فی رضائی کالفانین۔ إذا سئل أعطی ولم یتباطأ و إذا دعی الی خطّۃ فھو أول الملبین۔ قلبہ سلیم و خلقہ عظیم کرمہ کغزارۃ السحب و صحبتہ یصلح قلوب المتقشفین۔ و وَثْبُہ علی أعداء الدین
    و ثبۃ شبل مثار، قد امطرالاحجار علی کفار، و نقرّعن مسائل الویدیین
    و نقَّب و نزل فی بقعۃ النّوکی و عاقب فجعل سافل أرضہم عالیھا وثقّف کتبہ تثقیف العوالی لإفضاح المکذبین۔ فأخزی اللّٰہ الویدیین علی یدہ فکان وجوھھم أُسِفَّت رمادا، و اشربت سوادًا، وصاروا کالمیتین۔ ثم ارادوا الکرۃ ولکن کیف یحی الاموات بعد موتھم فرجعوا کالمخفقین۔
    و لوکان لہم نصیب من الحیاء لما عادوا ولکن صار الوقاحۃ کالتحجیل فی حلیۃ ھذا الجیل فہم یصولون کمذبوحین۔ والفاضل النبیل الموصوف من احب احبائی و ھو من الذین بایعونی وأخلصوا معی نیۃ العقد، و أعطونی صفقۃ العھد، علی ان لا یؤثروا شیءًا علی اللّٰہ الأحد، فوجدتہ من الذین یراعون عھودھم و یخافون رب العالمین۔ و ھو فی ھذا الزمن الذی تتطایر فیہ الشرور کالماء المعین الذی ینزل من السماء و من المغتنمین۔ ما آنست فی قلب احد محبۃ القرآن، کما أری قلبہ مملوًّا بمودۃ الفرقان۔ شغفہ الفرقان حُبّا و فی میسمہ یبرق حب آیات مبین۔ یُقذَف فی قلبہ انوار من اللّٰہ الرحمن۔ فیری بھا ما کان بعیدًا محتجبًا من دقائق القرآن
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 587
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 587
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/587/mode/1up
    و ؔ یغبطنی أکثر مآثرہ وھذا رزق من اللّٰہ یرزق عبادہ کیف یشاء وھو خیرالرازقین۔ قدجعلہ اللّٰہ من الذین ذوی الاَیدی والأبصار، و أودع کلامہ من حلاوۃ وطلاوۃ لا یوجد فی غیرہ من الأسفار۔ و لفطرتہ مناسبۃ تامۃ بکلام الرب الجلیل، وکم من خزائن فیہ أُودعتْ لھذا الفتی النبیل
    و ھذا فضل اللّٰہ لا منازع لہ فی أرزاقہ، فمن عبادہ رجال ما اعطی لہم بلالۃ، ورجال آخرون اعطی لہم غمر، و ما ھم بہ من المتعللین۔ ولعمری انہ امرء مواطن عظیمۃ صدق فیہ قول من قال:’’لکل علم رجال ولکل میدان أبطال۔‘‘ وصدق فیہ قول قائل ’’ان فی الزوایا خبایا، و فی الرجال بقایا،‘‘ عافاہ اللّٰہ و رعاہ واطال عمرہ فی طاعتہ و رضاہ و جعلہ من المقبولین۔ إنی أری الحکمۃ قد فاضت علی شفتیہ، و أنوار السماء قد نزلت لدیہ، و أری تواتر نزولھا علیہ کالمتضیّفین۔ کلما توجہ الی تاویل کتاب اللّٰہ بجمع الافکار، فتح ینابیع الأسرار و فجرعیون اللطائف۔
    وأظھر بدائع المعارف التی کانت تحت الأستار، و دقّق ذرات الدقائق، و وصل الی عروق الحقائق، وأتی بنور مبین۔ یمد العقلاء أعناقھم فی وقت تقاریرہ متسلمین لإعجاز کلامہ و عجائب تأثیرہ۔ یری الحق کسبیکۃ الذھب و یزیح شبھات المخالفین۔ إنّ الوقت کان وقت صراصر الفلسفۃ بل فسُد
    و خبُث وململ کل حدث ما حدث، و کان العلماء معروق العظم صفرالرایحۃ۔ من دولۃ العلوم الروحانیۃ و جواہر الأسرار الرحمانیۃ فقام ھذا الفتی و سقط علی أعداء الرسول صلی اللّٰہ علیہ وسلم کسقوط الشھب علی الشیاطین۔ فھو کحدقۃ العیون فی العلماء وفی فلک الحکمۃ کالشمس البیضاء
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 588
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 588
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/588/mode/1up
    لا ؔ یخاف الا اللّٰہ ولا یرضی بالآراء السطحیۃ التی منبتھا النَّجد غیر خَوْر، بل یبلغ فھمہ الی أسرار دقیقۃ المآخذ المخفیۃ فی أرض غَوْر۔ فللّٰہ درّہ و علی اللّٰہ أجرہ۔ قد اعاد اللّٰہ الیہ دولۃ منھوبۃ، و ھو من الموفقین۔ والحمد للّٰہ الذی و ھب لنا ھذا الحب فی حینہ و وقتہ و أیام ضرورتہ، فنسأل اللّٰہ تعالی ان یبارک فی عمرہ
    و صحتہ و ثروتہ، و یعطینا أوقاتا مستجابۃ للأدعیۃ لہ ولعشیرتہ، و یشھد فراستی أن ھذہ الاستجابۃ * امر محقوق لامظنون و نحن فی کل یوم من الآملین۔
    واللّٰہ إنّی أری فی کلامہ شأنا جدیدًا وأراہ فی کشف أسرار التنزیل
    و فھم منطوقہ و مفھومہ من السابقین۔ و إنی أری علمہ و حلمہ کالجبلین المتناوحین ما أدری ایھما فاق الآخر، انما ھو بستان من بساتین الدین المتین رب انزل علیہ برکات من السماء، واحفظہ من شرور الاعداء،
    اعلم أن استجابۃ الدعاء سر من اسرار حکمۃ ربّانیۃ خصص بھا حزب الروحانیین۔ و قد جرت عادۃ اللّٰہ أنہ یسخر عالم الموالید و تأثیرات اجرام السماء و قلوب الناس عند دعوات أولیاء ہ المقربین۔ فربما یستحیل الھواء الردی من عقد ھممھم الی صالحۃ طیبۃ والصالحۃ الی فاسدۃ و بائیّۃ، و القلوب القاسیۃ الی طبائع لینۃ متحننۃ و المتحننۃ الی قاسیۃ غلیظۃ باذن المتصرف فی السماء والارضین۔ و اذا اشتدت حاجۃ ولی اللّٰہ الی ظھور الشیء معدوم
    و یتوجہ لظھورہ باستغراق تام فیحدث ھذا الشیء بعقد ھمتہ و کذالک اذا توجہ الولی لاعدام الموجود فاذا ھو من المعدومین۔ و ذالک أصل الخوارق لا تحسھا حاسۃ حکماء الظاھرو لا یذوق طعمھا عقول الفلسفیین۔ و إن للأولیاء حواسا آخر تتنزل من تلقاء الحق۔ فاذا رزقوا من تلک الحواس
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 589
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 589
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/589/mode/1up
    و ؔ کن معہ حیث ما کان و ارحم علیہ فی الدنیا و الآخرۃ و انت ارحم الراحمین۔ آمین ثم آمین۔ والحمد للّٰہ اولًا و آخرًا و ظاھرًا و باطنًا، ھو ولِیّی فی الدنیا والآخرۃ۔ انطقنی روحہ و حرکتنی یدہ۔ فکتبت مکتوبی ھذا بفضلہ و ایماء ہ و القاء ہ و لا حول و لا قوۃ الا باللّٰہ و ھو القادر فی السماء والأرضین۔ رب کتبت ھذا المکتوب بقوتک و حولک و نفحات إلھامک فالحمد لک یا رب العالمین۔ أنت محسنی و منعمی و ناصری و ملہمی
    ونور عینی و سرور قلبی و قوۃ اقدامی۔أموت وأنا شاکر نعمائک بحالی
    و قالی و کلامی۔ یشکرک عظامی فی قبری و عجاجی فی جَدَثی، وروحی فی السماء۔ غلبت نعمتک علی شکری و استغرقت فی نعمائک عینی وأذنی و جنانی و رأسی و جوارحی و ظاھری و باطنی، و انت لی حصن حصین۔ أعوذبک من آفات الارض والسماء و من کل حاسد صوّاغ باللسان، و روّاغ
    فیتحلون بحلل مبتکرۃ و یسمعون اغنیۃ جدیدۃ ما سمعت أذن نظیرھا فی العالمین۔ یصفی عقولھم بکمال الصفاء و یؤتون علم ذرائع الاستنباط والاجتھاد۔ یعجب العقول دقۃ غموضھا و یکفر بھا کل غبی غیر ذھین۔ و کان اللّٰہ معھم فی کل حالھم و کانت یدہ علی مھماتھم و أفعالھم۔ اذا غلقوا بابًا فی الارض فتغلق فی السماء و اذا فتحوا فتفتح فی الأفلاک۔ دارت السمٰوات بدورۃِ عزیمتھم و قلب الأمور بتقلب ھممھم و یری اللّٰہ خلقہ عزتھم و وجاھتھم لیرغّب المتفطنین الیھم والسعیدین۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 590
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 590
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/590/mode/1up

    من ؔ الحق العیان، و من کل لسان سلیط، و غیظ مستشیط، و من کل ظلمۃ و ظلام، و من کل من یکون من المسیرۃ الیک من المانعین۔ و آخر دعوانا أن الحمد للّٰہ رب العالمین۔
    القصیدۃ
    ھذہ القصیدۃ أنیقۃ رشیقۃ مملوّۃ من اللطائف الأدبیۃ والفرائد العربیّۃ فی مدح
    سیدی وسید الثقلین خاتم النبیین محمد ن الذی وصفہ اللّٰہ فی الکتاب المبین،
    اللھم صل وسلم علیہ الی یوم الدین۔ و لیست ھذہ من قریحتی الجامدۃ،
    و فطنتی الخامدۃ، و ما کانت رویتی الناضبۃ ضلیع ھذا المضمار، ومنبع
    تلک الاسرار، بل کلما قلت فھو من ربی الذی ھو قرینی، و مؤیّدی
    الذی ھو معی فی کل حینی، الذی یطعمنی ویسقینی وإذا
    ضللت فھو یھدینی، وإذا مرضت فھو یشفینی ما کسبت
    شیءًا من مُلح الادب ونوادرہ، ولکن جعلنی اللّٰہ غالبًا
    علی قادرہ۔ وھذہ آیۃ من ربّی لقوم یعلمون، وانی
    اظھرتھا وبینتھا لعلّی أُجزی جزاء الشاکرین
    و لا أُلحق بالذین لا یشکرون۔
    یا عین فیض اللّٰہ و العرفان
    یسعی الیک الخلق کالظمآن
    یا بحر فضل المنعم المنّان
    تھوی إلیک الزّمر بالکیزان
    یاشمس ملک الحسن والإحسان
    نوّرت وجہ البرّ والعمران
    قوم رأوک و أمّۃ قد أخبرت
    من ذالک البدر الذی أصبانی
    یبکون من ذکر الجمال صبابۃً
    و تألّما من لوعۃ الھجران
    و أری القلوب لدی الحناجر کربۃ
    و أری الغروب تسیلھا العینان
    یا من غدا فی نورہ و ضیاۂ
    کالنّیّرین و نوّر المَلَوان
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 591
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 591
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/591/mode/1up
    یا ؔ بدرنا یا آیۃ الرحمٰن
    أھدی الھداۃ و أشجع الشُّجعان
    إنی أری فی وجھک المتھلل
    شأنًا یفوقُ شمائل الانسان
    وقداقتفاک أولواالنّہی وبصدقہم
    و دعوا تذکّر معھد الأوطان
    قد آثروک و فارقوا أحبابھم
    و تباعدوا من حلقۃ الاخوان
    قد ودَّعوا أھواء ھم و نفوسھم
    و تبرَّؤوا من کل نشْبٍ فانٍ
    ظھرت علیھم بیّنات رسولھم
    فتمزق الأھواء کالأوثان
    فی وقت ترویق اللیالی نُوِّروا
    واللّٰہ نجاھم من الطوفان
    قد ھاضہم ظلم الاناس و ضیمہم
    فتثبّتوا بعنایۃ المنّان
    نھب اللیام نشوبھم وعقارھم
    فتھللوا بجواھر الفرقان
    کسحوا بیوت نفوسھم وتبادروا
    لتمتُّع الإیقان و الإیمان
    قاموا باقدام الرسول بغزوھم
    کالعاشق المشغوف فی المیدان
    فدم الرجال لصدقھم فی حبھم
    تحت السیوف أریق کالقربان
    جاء وک منھوبین کالعریان
    فسترتھم بملاحف الایمان
    صادفتھم قومًا کروثٍ ذِلّۃ
    فجعلتھم کسبیکۃ العقیان
    حتی انثنی بَرٌّ کمثل حدیقۃ
    عذب الموارد مُثمرالأغصان
    عادت بلاد العُرب نحو نضارۃ
    بعدالوجی و المحل و الخسران
    کان الحجاز مَغازل الغِزلان
    فجعلتھم فانین فی الرحمان
    شیئان کان القوم عمیًا فیھما
    حسوُ العقار و کثرۃ النّسوان
    اما النّساء فحرِّمت انکاحھا
    زوجًا لہ التحریم فی القرآن
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 592
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 592
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/592/mode/1up
    و ؔ جعلت دسکرۃ المدام مخرَّبا
    و أزلت حانتھا من البلدان
    کم شارب بالرّشف دنًّا طافحًا
    فجعلتہ فی الدّین کالنشوان
    کم محدثٍ مستنطق العیدان
    قد صار منک محدَّث الرحمان
    کم مستھام للرّشوف تعشّقاً
    فجذبتہ جذبًا الی الفرقان
    احییت اموات القرون بجلوۃ
    ماذا یماثلک بھذا الشّان
    ترکوا الغبوق و بدّلوا من ذوقہ
    ذوق الدعاء بلیلۃ الأحزان
    کانوا برنّات المثانی قبلھا
    قد أُحصروا فی شُحّھا کالعانی
    قد کان مرتعھم أغانی دائمًا
    طورًا بغیدٍ تارۃ بدنان
    ما کان فکر غیر فکر غوانی
    أو شرب راحٍ او خیالِ جفانِ
    کانوا کمشغوف الفساد بجھلھم
    راضین بالأوساخ والأدران
    عیبان کان شعارھم من جھلھم
    حُمْق الحمار و وَثْبَۃُ السرحان
    فطلعت یا شمس الھدی نُصحًا لھم
    لتُضِیءھم من وجھک النورانی
    ارسلت من ربّ کریم محسن
    فی الفتنۃ الصمّاء و الطغیان
    یا لَلفتی ما حسنہ و جمالہ
    ریّاہ یصبی القلب کالریحان
    وجہ المھیمن ظاھرٌ فی وجھہ
    و شؤنہ لمَعت بھذا الشان
    فلذا یحبُّ و یستحقُّ جمالہ
    شغفًا بہ من زمرۃ الأخدان
    سُجْح کریم باذل خلّ التقی
    خرق وفاق طوائف الفتیان
    فاق الوری بکمالہ و جمالہ
    و جلالہ و جنانہ الریّان
    لا شک أنّ محمّدًا خیرالوری
    ریق الکرام و نخبۃ الاعیان
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 593
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 593
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/593/mode/1up
    تمّتؔ علیہ صفات کل مزیّۃ
    خُتِمت بہ نعماء کل زمان
    واللّٰہ إن محمّدًا کرِدافۃ
    و بہ الوصول بسُدّۃ السلطان
    ھو فخر کل مطھّر و مقدس
    و بہ یباھی العسکر الروحانی
    ھو خیر کلّ مقرّب متقدِّم
    والفضل بالخیرات لا بزمان
    والطَّلُّ قد یبدو أمام الوابل
    فالطل طلٌّ لیس کالتَّھْتان
    بطل وحید لا تطیش سھامہ
    ذو مصمیات موبق الشیطان
    ھو جنّۃٌ إنّی أری أثمارہ
    و قطوفہ قد ذلّلت لجنانی
    ألفیتہ بحر الحقائق والھدی
    ورأیتہ کالدُّر فی اللمعان
    قد مات عیسی مطرقا و نبیّنا
    حیٌّ و ربّی انّہ و افانی
    واللّٰہ انی قد رأیت جمالہ
    بعیون جسمی قاعدًا بمکانی
    ھا إن تظنَّیْت ابْن مریم عائشًا
    فعلیک إثباتًا من البرھان
    افانت لاقیت المسیح بِیَقظۃٍ
    أو جاء ک الأنباء من یقظان
    أنظر إلی القرآن کیف یُبیّن
    أفأنت تعرض عن ھدی الرحمان
    فاعلم بأن العیش لیس بثابت
    بل مات عیسی مثل عبد فان
    و نبیّنا حیٌّ و إنی شاھد
    و قد اقتطفت قطائف اللقیان
    ورأیت فی ریعان عمری وجھہ
    ثم النبیؐ بیقظتی لاقانی
    انی لقد احییت من احیاۂ
    و اھًا لإعجاز فما أحیانی
    یا رب صل علی نبیک دائمًا
    فی ھذہ الدنیا و بعث ثان
    یا سیّدی قد جئت بابَک لاھفًا
    والقوم بالإکفار قد آذانی
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 594
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 594
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/594/mode/1up
    یفرؔ ی سھامک قلب کل محارب
    و یَشُجُّ عزمک ھامۃ الثعبان
    لِلّٰہ درک یا إمام العالم
    انت السبوق و سیّد الشجعان
    أُنْظر إلیَّ برحمۃ و تحنّن
    یا سیدی أنا أحقر الغلمان
    یا حِبِّ إنک قد دخلت محبۃً
    فِی مُہْجَتی و مدارکی و جنانی
    من ذکروجھک یا حدیقۃ بہجتی
    لم أَخْلُ فی لحظٍ ولا فی آن
    جسمی یطیر الیک من شوق علا
    یالیت کانت قوۃ الطیران
    القصیدۃ المبتکرۃ المحبّرۃ التی خاطری ابو عذرھا و قد أودعتھا
    أشعارًا تشفی صدور المتفکرین و تروی أُوام الصادین۔
    بمُطَّلعٍ علی أسرار بالی
    بعالم عیبتی فی کل حالی
    بوجہٍ قد رأی أعشار قلبی
    بمستمع لصرخی فی اللیالی
    لقد أرسلت من رب کریم
    رحیم عند طوفان الضلال
    وقد أعطیت برھانًا کرمح
    و ثقّفناہ تثقیف العوالی
    فلا تقف الظنون بغیر علم
    و خفْ أخذا المحاسب ذی الجلال
    تری آیات صدقی ثم تنسی
    لحاک اللّٰہ مالک لا تبالی
    تعال إلی الھدی ذُلًّا خضوعًا
    إلی ما تکتسی ثوب الدلال
    و إنْ ناضلتنی فتری سھامی
    و مثلی لا یفرّ من النضال
    سھامی لا تطیش بوقت حرب
    وسیفی لا یغادر فی القتال
    فإن قاتلتنی فأریک أنی
    مقیم فی میادین القتال
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 595
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 595
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/595/mode/1up
    أباؔ لإیذاء أترک أمر ربّی
    و مثلی حین یؤذی لا یبالی
    و کیف أخاف تھدید الخُناثٰی
    و قد أعطیت حالات الرّجال
    ألا انی أقاومُ کلَّ سھمٍ
    و أَقلی الا کتنان عن النّبال
    فإن حَرْبًا فحربٌ مثل نارٍ
    و إن سلمًا فسِلْمٌ کالزُّلال
    و حربی بالدلائل لاالسھام
    و قولی لھذمٌ شاجُ القذال
    وفاق السیف نطقی فی الصقال
    قد اغْتلتُ المکفّر کالغزال
    ولم یزل اللّئام یکفّرونی
    إلی أن جاء نصرۃُ ذی الجلال
    و قد جادلتنی ظلمًا و زُورًا
    و جاوزت الدیانۃ فی الجدال
    ولو قبل الجدال سألت منّی
    جُذِبتَ إلی الھدی قبل الوبال
    لنا فی نصرۃ الدِّین المتین
    مساعٍ فی الترقی والکمال
    ھدانی خالقی نھجًا قویمًا
    و ربّانی بأنواع النَّوال
    لقد أُعطیت أسرار السرائر
    فسل إن شئت من نوع السؤال
    و قد غوّصتُ فی بحر الفناء
    فعدتُ و فی یدی أَبہَی اللآلی
    رأیت بفضل ربی سبل ربی
    و إن کانت أدقّ من الھلال
    و کم سرٍّ أرانی نور ربی
    و آیاتٍ علی صدق المقال
    و علم یَبْھَرَنَّ عقول ناس
    و رأیٍ قد علا قُنَنَ الجبال
    سعیت و ما ونیت بشوق ربی
    إلی أن جاء نی ریا الوصال
    و قد أُشربت کأْسًا بعد کاسٍ
    الی أن لاح لی نور الجمال
    وقد اُعطیتُ ذوقًا بعد ذوق
    و نعماء المحبّۃ والدلال
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 596
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 596
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/596/mode/1up
    وجدؔ ت حیات قلبی بعد موتی
    و عادت دولتی بعد الزّوال
    لفاظات الموائد کان أُکلی
    وصرتُ الیوم مطعام الأھالی
    أزید بفضلہ یومًا فیومًا
    و أُصلی قلب منتظر الوبال
    ألا یا حاسدی خف قھر ربی
    و ما ٰالوک نصحًا فی المقال
    فلا تستکبرن بفور عجب
    و کم من مُزْدہٍ صیدُ النَّکال
    ألا یا خاطب الدنیا الدّنِیّہ
    تذکّرْ یوم قرب الإرتحال
    سھام الموت تفجأُ یا عزیزی
    ولو طال المدی فی الإنتقال
    ھداک اللّٰہ قد جادلتَ بغضا
    وما فکّرتَ فی قولی و قالی
    و کم اکفرتنی کذبًا و زورًا
    و کم کذّبت من زیغ الخیال
    و إنی قد أری قد ضاع دِیْنُکْ
    فقم وَ ارْبَأْ بہ قبل الرِّحال
    حیاتک بالتغافل نوع نوم
    و أیام المعاصی کاللّیالی
    ولستُ بطالب الدُّنیا کَزعمِکْ
    و قد طَلَّقْتُھَا بِالِاعتزالِ
    ترکنا ھذہ الدنیا لوجہٍ
    و آثرنا الجَمال علی الجِمال
    و إِنک تزدری نُطقی و قولی
    و لوصادفتہ مثل اللآلی
    فلا تنظر الی زحفٍ فإِنی
    نظمت قصیدتی بِالارتجالِ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 597
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 597
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/597/mode/1up
    شیخ ؔ محمد حسین بٹالوی کے اس پرچہ کا جواب جو انہوں نے
    ۹ جنوری ۱۸۹۳ ؁ء کو لکھ کر اپنے پرچہ نمبر ۱ جلد ۱۵ میں شائع کیا
    خدا چون بہ بندد دو چشم کسے
    نہ بیند و گر مہر تابد بسے
    شیخ صاحب بٹالوی نے پھر اس پرچہ کے صفحہ ۲۲ میں اس عاجز پر یہی الزام لگایا ہے کہ دروغ سے آپکی کوئی تحریر خالی نہیں۔ سچ ہے انسان جس وقت بباعث تکبر اور حسد کے پردوں کے نابینا ہوجاتا ہے تو اس وقت اسکو ظلمت ہی ظلمت نظر آتی ہے۔ مگر یاد رہے کہ یہ الزام کچھ نئے نہیں خداتعالیٰ کے نیک بندے جس قدر دنیا میں آئے بدطینتوں نے ان پر یہی الزام لگائے کہ یہ جھوٹے ہیں کذاب ہیں مفتری ہیں شہوت پرست ہیں مال خور ہیں۔ لیکن جب دنیاان دونوں گروہ میں فیصلہ نہ کرسکے تب آخر اس نے جس کی نظر دلوں کے پاتال تک پہنچتی ہے اپنے آسمانی فیصلہ سے روز روشن کی طرح دکھلا دیاکہ کون کذاب اور کون صادق ہے۔ سو اس وقت میں کچھ ضر ور نہیں سمجھتا کہ باربار اپنے صدق کے ثبوت پیش کروں۔ میں خوب جانتا ہوں کہ جس پر میرا بھروسہ ہے اور جو میری اندرونی حالتوں کوسب سے بہتر جانتاہے وہ آپ فیصلہ کرے گا دیکھنا چاہیئے کہ ایک زمانہ تک ہمارے سید ومولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے کفار نابکار سے کیا کچھ اپنے نام سنے اور ان پر کس قدر بیجا تہمتیں افتراء وغیرہ کی لگائی گئیں۔ لیکن چونکہ وہ سچے تھے اور خدا انکے ساتھ تھا اس لئے آخرکار مخفی نہ رہ سکے اور آسمان نے بڑی قوت کے ساتھ ان نوروں کے ظاہر کرنے کیلئے جوش مارا تو تب سب مکذب ایسے نابود ہوئے اور لپیٹے گئے جیسے کوئی کاغذ کا تختہ لپیٹ دیوے۔ یاد رہے کہ اکثر ایسے اسرار دقیقہ بصورت اقوال یا افعال انبیاء سے ظہور میں آتے رہے ہیں کہ جو نادانوں کی نظر میں سخت بیہودہ اور شرمناک کام تھے جیسا کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام کا مصریوں کے برتن اور پارچات مانگ کرلے جانا اور پھر اپنے تصرف میں لانا اور حضرت مسیح کا کسی فاحشہ کے گھر میں چلے جانا اور اس کا عطر پیش کردہ جو حلال وجہ سے نہیں تھا، استعمال کرنا اور اس کے لگانے سے روک نہ دینا اور حضرت ابراہیم علیہ السلام کا تین مرتبہ ایسے طور پر کلام کرنا جو بظاہر دروغ گوئی میں داخل تھا پھر اگر کوئی تکبر اور خودستائی کی راہ سے اس بنا پر
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 598
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 598
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/598/mode/1up
    حضرؔ ت موسیٰ کی نسبت یہ کہے کہ نعوذ باللہ وہ مال حرام کھانے والا تھا۔ یا حضرت مسیح کی نسبت یہ زبان پر لاوے کہ وہ طوائف کے گندہ مال کو اپنے کام میں لایا۔ یا حضرت ابراہیم کی نسبت یہ تحریر شائع کرے کہ مجھے جس قدر ان پر بدگمانی ہے اس کی وجہ ان کی دروغ گوئی ہے توایسے خبیث کی نسبت اور کیا کہہ سکتے ہیں کہ اس کی فطرت ان پاک لوگوں کی فطرت سے مغائر پڑی ہوئی ہے اور شیطان کی فطرت کے موافق اس پلید کا مادہ اور خمیر ہے۔ سو حضرت بٹالوی صاحب یاد رکھیں کہ جس قدر آپ اس عاجز کی نسبت بباعث اپنی نادانی کے دروغ گوئی کے الزام لگاتے ہیں وہ اسی قسم کے اعتراض ہیں جو پہلے اس سے نابکار لوگوں نے انبیاء علیہم السلام پر کئے ہیں۔ مگر آپ پر تکبر اور غرور اور خودپسندی کا اعتراض ہے جو اسی معلم الملکوت کا خاصہ ہے جو آپ کا قرین دائمی ہے۔ اگر کوئی کذب حقیقت میں ہم سے ظہور میں آیا ہے تو ہم اس کی سزا پائیں گے۔ اور اگر خلیل اللہ کے کلمات کی طرح ہمارا کوئی کلمہ کسی نادان کی نظر میں بصورت دروغ معلوم ہوتو یہ اس کی نادانی ہوگی جو ایک دن ضرور اس کو رسوا کرے گی۔ خدا تعالیٰ ایسے لوگوں سے پناہ میں رکھے جو کہ ابلیس کی چادر پہن کر اپنی نفسانی پندار سے ہمچومن دیگرے نیست کہتے پھریں اور اپنی کور باطنی سے دوسروں کی نکتہ چینی کریں۔ میں سچ سچ کہتا ہوں کہ قیامت کے دن شرک کے بعد تکبر جیسی اور کوئی بلا نہیں۔ یہ ایک ایسی بلا ہے جو دونوں جہان میں انسان کو رسوا کرتی ہے۔ خدا تعالیٰ کا رحم ہر یک موحد کا تدارک کرتا ہے مگر متکبر کا نہیں۔ شیطان بھی موحد ہونے کادم مارتا تھا مگر چونکہ اس کے سر میں تکبر تھا اور آدم کو جو خدا تعالیٰ کی نظر میں پیارا تھا۔ جب اس نے توہین کی نظر سے دیکھا اور اس کی نکتہ چینی کی اس لئے وہ مارا گیا اور طوق *** اس کی گردن میں ڈالا گیا۔ سو پہلا گناہ جس سے ایک شخص ہمیشہ کیلئے ہلاک ہوا تکبر ہی تھا۔ اب میں اللہجلّ شانہٗ کی قسم کھا کر کہتا ہوں جس کے ہاتھ میں میری جان ہے جو بدکار مفتری کو بے سزا نہیں چھوڑے گا کہ خدا تعالیٰ نے جیسے مجھے مسیح ابن مریم قرار دیا ایسا ہی آدم بھی قرار دیا اور فرمایا کہ اردت ان استخلف فخلقت آدم۔ یعنے میں نے ارادہ کیا کہ دنیا میں اپنا خلیفہ مقرر کروں سو میں نے آدم کو پیدا کیا یعنے اس عاجز کو۔ سو جبکہ میں آدم ٹھہرا تومیرے لئے ایک نکتہ چین بھی چاہیئے تھا۔ جو اول لوگوں کی نظر میں ملکوت میں داخل ہو اور پھر الٰی یوم الدین کا جامہ پہنے۔ سو اب معلوم ہوا کہ وہ آپ ہی ہیں۔ اور پھر میں قسم کھا کر کہتا ہوں کہ یہ فقرہ جو میں اوپر لکھ آیا ہوں یہ اللہ جلّ شانہٗ کا کلام ہے۔ اور اگر یہ اللہ جلّ شانہٗ کا کلام نہیں تو میں دعا کرتا ہوں کہ خدا تعالیٰ ایک رات بھی مجھ کو مہلت نہ دے اور میرے پر وہ سزا نازل کرے جوکسی پر نہ کی ہو۔ اے میرے خدا۔ اے میرے ہادی۔ رہنما۔ اگر یہ تیرا کلام نہیں۔ اگر تو نے ہی مجھے خلیفہ مقرر نہیں کیا۔ اگر تو نے ہی میرا نام عیسیٰ نہیں رکھا اور تو نے ہی میرا نام آدم نہیں رکھا تو مجھے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 599
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 599
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/599/mode/1up
    زندوؔ ں میں سے کاٹ ڈال۔ لیکن اگر میں تیری طرف سے ہوں اور تیرا ہی ہوں تو میری مدد کر۔ جیسا کہ تو ان کی مدد کرتا ہے جو تیری طرف سے آتے ہیں۔
    بالآخر میں اس بات کے لکھنے سے بھی نہیں رہ سکتا کہ بٹالوی صاحب کا رئیس المتکبرین ہونا صرف میرا ہی خیال نہیں بلکہ ایک گروہ کثیر مسلمانوں کا اس پر شہادت دے رہا ہے۔ اور ساتھ ہی لوگ اس بات سے بھی حیران ہیں کہ یہ تکبر کس وجہ سے اور کس بنا پر ہے۔ مثلاً شیطان نے جو تکبر کیا تو اس کی یہ بنا تھی جو وہ اپنے تئیں نجیب الخلقت سمجھتا تھا اور 3 ۱؂ کا دم مار کر حضرت صفی اللہ پر 3 ۲؂ کی نکتہ چینی کرتا تھا۔ پس اگر حضرت بٹالوی صاحب اوروں کی نسبت اپنے تئیں ایک خاص طور سے نجیب الطرفین خیال کرتے ہیں تو اس کا کوئی ثبوت دینا چاہیئے اور کوئی ایک آدھ شہادت پیش کرنی چاہیئے۔ اور اگر تکبر کی بنا کسی نوع کاعلم ہے جو میاں شیخ الکل یا کسی اور سے حاصل کیا ہے تو اس کا بھی ثبوت چاہیئے۔ کیونکہ اب تک ہمیں اس بات کا علم نہیں کہ کونسا علم ان کو حاصل ہے۔ آیا طبیب ہیں یا فلاسفر ہیں یاہئیت دان ہیں یا منطقی یا ادیب۔ یا حقائق اور معارف قرآن میں سب سے بڑھے ہوئے ہیں یا امام بخاری کی طرح کئی لاکھ حدیث نوک زبان ہے۔ اور اگر ان باتوں میں سے کوئی بات بھی نہیں تو پھر بجز شیطانی تکبر کے اور کیا ان کی نسبت ثابت ہوسکتا ہے۔ اب یاد رہے کہ تکبر کو جھوٹ لازم پڑا ہوا ہے بلکہ نہایت پلید جھوٹ وہ ہے جو تکبر کے ساتھ مل کر ظاہر ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اللہجلّ شانہٗ متکبر کا سب سے پہلے سر توڑتا ہے سو اسی طرح اب بھی توڑے گا۔ یہ تو ثابت ہو چکا ہے کہ میاں بٹالوی کا یہ شیوہ ہے کہ اپنا تو خاص طور پر مولوی نام رکھا ہے اور دوسروں کا نام جاہل۔ احمق ان پڑھ اور جس پر بڑی مہربانی ہوئی اس کو منشی کر کے پکارا ہے۔ اور ہماری جماعت کا نام جہلاء اور سفہاء کی جماعت نام رکھا ہے۔
    اب میاں بٹالوی بتلاویں کہ انہوں نے اپنے تئیں مولوی قرار دینے اور دوسروں کا نام جاہل اور ان پڑھ رکھنے میں سچ بولا ہے یا جھوٹ۔ میں سچ سچ کہتا ہوں کہ میں دیکھتا ہوں کہ میاں بٹالوی کی جڑوں میں جھوٹ رچا ہوا ہے اور تکبر کی پلید سرشت نے اور بھی اس جھوٹ کو زہریلا مادہ بنا دیا ہے چونکہ شیطانی نخوت نے اپنا پورا پورا بوجھ ان پر ڈال دیا ہے اس لئے ایک زور کے ساتھ دروغ گوئی کی نجاست ان کے منہ سے بہ رہی ہے۔ پھر اس کے ساتھ وقاحت یہ کہ دوسروں کا نام دروغ گو رکھتے ہیں۔ میں یہ حلفاًکہہ سکتا ہوں کہ اگر میرے مکرم و مخدوم دوست مولوی حکیم نورالدین صاحب بارک اللّٰہ تعالٰی فی مجدہ و علمہ و بقا ۂ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 600
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 600
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/600/mode/1up
    و رزؔ ق عبادہ من نفحات فیوضہ و برکات نورہ و ضیاء ہ۔ ایک طرف کھڑے ہوکر قرآن کریم کے معارف بیان کریں اور ایک طرف میاں بٹالوی فرقان حمید کے کچھ حقائق بیان کرنا چاہیں تو مجھے یقین ہے اور گویا میں دیکھ رہا ہوں کہ حضرت موصوف کے مقابل پر یہ بیچارہ نیم مُلّا گرفتار عُجب و پندار بٹالوی ایسا عاجز اور پیچھے رہ جاوے کہ ہر یک عقلمند اس پر ہنسے مجھے ہر بار یہی تعجب آتا ہے کہ یہ حاطب اللیل باوجود اپنے اس بیجا تکبر اور کذب صریح کے کیوں اپنے گریبان میں منہ نہیں ڈالتا اور خبث نفس سے علماء اور فضلاء کا حقارت سے نام لیتا ہے۔ اس کی مولویت اور اس کے ظنون فاسدہ کا فیصلہ نہایت آسان ہے جس کا اب بفضلہ تعالیٰ وقت پہنچ گیا ہے۔انشاء اللہ تعالیٰ میں اس فیصلہ کیلئے ایک معیار کامل اس مضمون کے اخیر میں بیان کروں گا۔ اب چند اعتراضات ضروریہ کا جواب دیتا ہوں اور وہ یہ ہے۔
    قولہ۔ نبیوں کی بھی پیشگوئیوں کا سچا ہونا ضروری ہے یا نہیں۔ صفحہ ۲۶۔
    اقول۔ اس سوال سے معترض نادان کی یہ غرض معلوم ہوتی ہے کہ گویا اس عاجز سے کوئی پیش گوئی خلاف واقعہ نکلی ہے۔ پس واضح ہو کہ یہ فیصلہ تو آسان ہے۔ معترض پر واجب ہے کہ ایک جلسہ مقرر کر کے وہ الہام اس عاجز کا پیش کرے کہ جوبقول اس کے نفس الہام میں غلطی ہو نہ کسی ظنی اور خیالی تعبیر میں۔ لیکن ایسے شخص کیلئے کچھ سزا بھی چاہیئے تا بار بار دروغ گوئی کی نجاست کی طرف نہ دوڑے۔
    قولہ۔ جس شخص کی کوئی پیشگوئی سچی نکلے اور کوئی جھوٹی۔ وہ سچی پیشگوئی میں ملہم ہو سکتا ہے۔
    اقول۔ اے محجوب نادان۔ کوئی پیشگوئی اس عاجز کی بفضلہ تعالیٰ آج تک جھوٹی نہیں نکلی بلکہ تین ہزار کے قریب اب تک سچی نکلیں اور نکلتی جاتی ہیں۔ رہی اجتہادی غلطی، سو بخاری کو کھول اور ذھب وھلی کا مضمون یاد کر۔ اور ان لوگوں کی مشابہت سے ڈر جو بعض پیشگوئیوں کی اجتہادی غلطیوں کو دیکھ کر مرتد ہوگئے تھے۔
    قولہ۔ ایسا شخص اگر جھوٹ بولتا ہو۔ لوگوں کے مال ناجائزمارتا ہو الخ تو پھر بھی وہ اگر اس کی کوئی پیشگوئی سچی نکل آوے۔ ملہم، ولی، محدث اور خدا کا مخاطب ہو سکتا ہے؟
    اقول۔ آپ جیسے نابکار مفتریوں نے انبیاء پر بھی یہی الزام لگائے تھے۔ حضرت ابراہیم پر جھوٹ کی تہمت۔ حضرت موسیٰ اور حضرت عیسیٰ پر مال حرام کی اور اس زمانہ کے کور باطن عیسائی وغیرہ ایسے ہی الزام آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم پر لگاتے ہیں کہ فلاں قافلہ کا مال بغیر کسی موقعہ لڑائی کے لوٹ لیا۔ چنانچہ ان الزاموں سے ان کی کتابیں بھری پڑی ہیں۔ اب اگر یہ سوال ہو کہ ایک شخص نے ہزارہا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 601
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 601
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/601/mode/1up
    خون ؔ بھی کئے اور مال بھی لوٹے تو وہ کیونکر نبی صادق ٹھہر سکتا ہے تو ایسے جاہل کا یہی جواب ہوگا کہ اپنے ان کامل نوروں کی وجہ سے جو بجز راستباز کے کسی کو نہیں مل سکتے۔ عقلمند انسان ان نوروں کی چمک دیکھ کر ان امور کی صحیح تاویل آپ اپنی عقل خداداد سے سمجھ لے گا۔ اور جاہل اعتراضوں پر جمے گا۔ اور سیدھا جہنم کی طرف جائے گا۔ اصل حقیقت یہ ہے کہ تمام حقوق پر خدا تعالیٰ کا حق غالب ہے اور ہر ایک جسم اور روح اور مال اسی کی ملک ہے۔ پھر جب انسان نافرمان ہو جاتا ہے تو اس کی ملک اصل مالک کی طرف عود کرتی ہے۔ پھر اس مالک حقیقی کو اختیار ہوتا ہے کہ چاہے تو بلا توسط رسل نافرمانوں کے مالوں کو تلف کرے اور ان کی جانوں کو معرض عدم میں پہنچاوے۔ اور یا کسی رسول کے واسطہ سے یہ تجلی قہری نازل فرماوے۔ بات ایک ہی ہے۔ اسی طرح خضر کے کاموں کی مانند ہزاروں امور ہوتے ہیں جو انبیاء اور محدثین پر ان کی خوبی ظاہر کی جاتی ہے اور وہ ان کاموں کیلئے مامور کئے جاتے ہیں اور ان کے کاموں میں جو لوگ عجلت سے مخالفانہ دخل دیتے ہیں۔ وہی ہیں جو ہلاک ہوتے ہیں۔
    قولہ۔ اس عاجز کی باون سال کی عمر پر پہنچ کر فوت ہونے کی پیشگوئی آپ نے کی ہے یانہیں۔
    اقول۔ میں نے آپ کی نسبت یہ پیشگوئی ہرگز نہیں کی۔ اگر کسی نے میری طرف سے کہا ہے تو اس نے جھوٹ بولا ہوگا۔ اور آپ کی سراسر یہ بددیانتی اور خیانت ہے کہ بغیر اس کے جو مجھ سے دریافت کرتے یا میری کسی تحریر میں پاتے۔ ناحق بے وجہ یہ الزام میرے پر لگا دیا۔
    قولہ۔ بعض مرید آپ کے شراب پیتے ہیں۔ اور کیا آپ کے بڑے معاون اور مرید نے آپ کے مکان پر شراب نہیں پی۔
    اقول۔ *** اللّٰہ علی الکاذبین اب ثابت کرو کہ کس نے میرے مکان پر شراب پی۔ اور میرے بیعت کنندوں میں سے کون شراب پیتا ہے۔ میں دیکھتا ہوں کہ لوگ بیعت کے بعد معاً ایک پاک تبدیلی اپنے چال چلن میں دکھلاتے ہیں۔ وہ نماز کے پابند ہوتے ہیں اور منہیات سے پرہیز کرتے ہیں اور دین کو دنیا پر مقدم رکھ لیتے ہیں۔ اور صادق پرہیزگاروں کو اس بات کی کچھ بھی حاجت نہیں کہ کوئی ان کو نیک کہے۔ خدا تعالیٰ دلوں کو دیکھ رہا ہے اور اس کا دیکھنا کافی ہے۔
    اب میں اپنے و عدہ کے موافق ایک ایسا معیار ذیل میں ظاہر کرنا چاہتا ہوں جس سے بخوبی کھل
    جائے کہ یہ عاجز موید من اللہ ہے اور حضرت بٹالوی صاحب اول درجہ کے کاذب اور دجال اور رئیس المتکبرین ہیں اور وہ تقریر یہ ہے کہ حضرت بٹالوی صاحب کی متواتر تحریروں سے ناظرین کو معلوم ہے کہ انہوں نے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 602
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 602
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/602/mode/1up
    اسؔ عاجز کا نام جاہل اور نادان اور ان پڑھ رکھا ہے اور ساتھ اس کے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ یہ عاجز دراصل ملہم اور محدث نہیں ہے بلکہ مفتری اور کذّ اب اور دجال ہے اور بقول ان کے اس عاجز کے رگ و ریشہ میں جھوٹ رچا ہوا ہے اور جب بعض نشان ان کو دکھلائے گئے تو ان کی نسبت ان کا یہ بیان ہے کہ کبھی جھوٹے مدعی کی بھی خدا تعالیٰ مدد کرتا ہے اور حالانکہ جانتا ہے کہ یہ میری مدد اس کذاب کے صدق دعویٰ کیلئے دلیل ٹھہر جائے گی تب بھی مدد کرتا ہے اور ایسے کذابوں کو توفیق دیتا ہے کہ وہ رمل کے ذریعہ سے یا جفر کے ذریعہ سے کوئی بات کہہ دیں اور وہ بات پوری ہو جائے۔ سو اس قسم کے نشانوں کو بٹالوی صاحب نے اپنے بیہودہ بیانات سے رد کر دیا ہے لیکن اس جگہ ایک اور معیار ہے جو ہم ذیل میں لکھتے ہیں :
    ایک روحانی نشان جس سے ثابت ہوگا کہ یہ عاجز صادق
    اور خدا تعالیٰ سے مؤید ہے یا نہیں۔
    اور شیخ محمد حسین بٹالوی اس عاجز کو کاذب اور دجّال قرار دینے میں
    صادق ہے یا خود کاذب اور دجّال ہے
    عاقل سمجھ سکتے ہیں کہ منجملہ نشانوں کے حقائق اور معارف اور لطائف حکمیہ کے بھی نشان ہوتے ہیں۔ جو خاص ان کو دئیے جاتے ہیں جو پاک نفس ہوں اور جن پر فضل عظیم ہو جیسا کہ آیت 3 ۱؂ اور آیت 33 ۲؂ بلند آواز سے شہادت دے رہی ہے۔ سو یہی نشان میاں محمد حسین کے مقابل پر میرے صدق اور کذب کے جانچنے کیلئے کھلی کھلی نشانی ہوگی اور اس فیصلہ کیلئے احسن انتظام اس طرح ہو سکتا ہے کہ ایک مختصر جلسہ ہو کر منصفان تجویز کردہ اس جلسہ کے چند سورتیں قرآن کریم کی جن کی عبارت اسی آیت سے کم نہ ہو تفسیر کیلئے منتخب کر کے پیش کریں۔ اور پھر بطور قرعہ اندازی کے ایک سورہ ان میں سے نکال کر اسی کی تفسیر معیار امتحان ٹھہرائی جائے اور اس تفسیر کیلئے یہ امر لازمی ٹھہرایا جاوے کہ بلیغ فصیح زبان عربی اور مقفّّٰیعبارت میں قلمبند ہو اور دس جزو سے کم نہ ہو۔ اور جس قدر اس میں حقائق اور معارف لکھے جائیں وہ نقل عبارت کی طرح نہ ہو بلکہ معارف جدیدہ اور لطائف غریبہ ہوں۔ جو کسی دوسری کتاب میں نہ پائے جائیں۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 603
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 603
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/603/mode/1up
    اورؔ بااین ہمہ اصل تعلیم قرآنی سے مخالف نہ ہوں بلکہ ان کی قوت اور شوکت ظاہر کرنے و الے ہوں*۔ اور کتاب کے آخر میں سو شعر لطیف بلیغ اور فصیح عربی میں نعت اور مدح آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم میں بطور قصیدہ درج ہوں اور جس بحر میں وہ شعر ہونے چاہئیں وہ بحر بھی بطور قرعہ اندازی کے اسی جلسہ میں تجویز کیا جائے اور فریقین کو اس کام کیلئے چالیس دن کی مہلت دی جائے۔ اور چالیس دن کے بعد جلسہ عام میں فریقین اپنی اپنی تفسیر اور اپنے اپنے اشعار جو عربی میں ہوں گے سنادیں۔ پھر اگر یہ عاجز شیخ محمد حسین بٹالوی سے حقائق و معارف کے بیان کرنے اور عبارت عربی فصیح و بلیغ اور اشعار آبدار مدحیہ کے لکھنے میں قاصر اور کم درجہ پر رہا۔ یا یہ کہ شیخ محمد حسین اس عاجز سے برابر رہا تو اسی وقت یہ عاجز اپنی خطا کا اقرار کرے گا اور اپنی کتابیں جلا دے گا۔ اور شیخ محمد حسین کا حق ہوگا کہ اس وقت عاجز کے گلے میں رسہ ڈال کر یہ کہے کہ اے کذاب۔ اے دجال۔ اے مفتری۔ آج تیری رسوائی ظاہر ہوئی۔ اب کہاں ہے وہ جس کو تو کہتا تھا کہ میرا مددگار ہے۔ اب تیرا الہام کہاں ہے اور تیرے خوارق کدھر چھپ گئے۔ لیکن اگر یہ عاجز غالب ہوا تو پھر چاہیئے کہ میاں محمد حسین اسی مجلس میں کھڑے ہو کران الفاظ سے توبہ کرے کہ اے حاضرین آج میری رو سیاہی ایسی کھل گئی کہ جیسے آفتاب کے نکلنے سے دن کھل جاتا ہے اور اب ثابت ہوا کہ یہ شخص حق پر ہے اور میں ہی دجال تھا اور میں ہی کذاب تھا اور میں ہی کافر تھا اور میں ہی بے دین تھا اور اب میں توبہ کرتا ہوں۔ سب گواہ رہیں۔ بعد اس کے اسی مجلس میں اپنی کتابیں جلادے۔ اور ادنیٰ خادموں کی طرح پیچھے ہولے۔*
    صاحبو۔ یہ طریق فیصلہ ہے جو اس وقت میں نے ظاہر کیا ہے۔ میاں محمد حسین کو اس پر سخت اصرار ہے کہ یہ عاجز عربی علوم سے بالکل بے بہرہ اور کو دن اور نادان اور جاہل ہے** اور علم قرآن سے بالکل بے خبر ہے اور خدا تعالیٰ سے مدد پانے کے تو لائق ہی نہیں کیونکہ کذاب اور دجال ہے اور ساتھ اس کے ان کو اپنے کمال علم اور فضل کا بھی دعویٰ ہے۔ کیونکہ ان کے نزدیک حضرت مخدوم مولوی حکیم نور الدین صاحب جو اس عاجز کی نظر میں علامہ عصر اور جامع علوم ہیں۔ صرف ایک حکیم۔ اور اخویم مکرم مولوی سید محمد احسن صاحب جو گویا علم حدیث کے ایک پُتلے ہیں صرف ایک منشی ہیں۔ پھر باوجود ان کے اس دعویٰ کے اور میرے اس ناقص حال کے جس کو وہ بار بار شائع کرچکے ہیں۔ اس طریق فیصلہ میں کون سا اشتباہ باقی ہے۔ اور اگر وہ اس مقابلہ کے لائق نہیں۔ اور اپنی نسبت بھی جھوٹ بولاہے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 604
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 604
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/604/mode/1up
    اورؔ میری نسبت بھی اور میرے معظم اور مکرم دوستوں کی نسبت بھی تو پھر ایسا شخص کسی قدر سزا کے لائق ہے کہ کذاب اور دجال تو آپ ہو۔ اور دوسروں کو خواہ نخواہ دروغ گو کر کے مشتہر کرے۔ اور یہ بات بھی یاد رہے کہ یہ عاجز درحقیقت نہایت ضعیف اور ہیچ ہے۔ گویا کچھ بھی نہیں۔ لیکن خداتعالیٰ نے چاہا ہے کہ متکبر کا سر توڑے اور اس کو دکھاوے کہ آسمانی مدد اس کا نام ہے۔ چند ماہ کا عرصہ ہوا ہے جس کی تاریخ مجھے یاد نہیں کہ ایک مضمون میں نے میاں محمد حسین کا دیکھا۔ جس میں میری نسبت لکھا ہوا تھا کہ یہ شخص کذاب اور دجال اور بے ایمان اور باایں ہمہ سخت نادان اور جاہل اور علوم دینیہ سے بیخبر ہے۔ تب میں جناب الٰہی میں رویا کہ میری مدد کر تو اس دعا کے بعد الہام ہوا کہ ادعونی استجب لکم یعنے دعا کرو کہ میں قبول کروں گا مگر میں بالطبع نافرتھا کہ کسی کے عذاب کیلئے دعا کروں آج جو ۲۹ شعبان ۱۳۱۰ ؁ھ ہے اس مضمون کے لکھنے کے وقت خداتعالیٰ نے دعا کیلئے دل کھول دیا۔ سو میں نے اس وقت اسی طرح سے رقت دل سے اس مقابلہ میں فتح پانے کیلئے دعا کی اور میرا دلُ کھل گیا اور میں جانتا ہوں کہ قبول ہوگئی۔ اور میں جانتا ہوں کہ وہ الہام جو مجھ کو میاں بٹالوی کی نسبت ہوا تھا کہ انّی مھین من اراد اھانتک وہ اسی موقع کیلئے ہوا تھا۔ میں نے اس مقابلہ کیلئے چالیس دن کا عرصہ ٹھہرا کر دعا کی ہے اور وہی عرصہ میری زبان پر جاری ہوا۔ اب صاحبو اگر میں اس نشان میں جھوٹا نکلا یا میدان سے بھاگ گیا۔ یا کچے بہانوں سے ٹال دیا تو تم سارے گواہ رہو کہ بیشک میں کذاب اور دجال ہوں۔ تب میں ہر یک سزا کے لائق ٹھہروں گا۔ کیونکہ اس موقعہ پر ہر یک پہلو سے میرا کذب ثابت ہو جائے گا اور دعا کا نامنظور ہونا کھل کر میرے الہام کا باطل ہونا بھی ہر یک پر ہویدا ہو جائے گا۔ لیکن اگر میاں بٹالوی مغلوب ہوگئے تو ان کی ذلت اور رو سیاہی اور جہالت اور نادانی روز روشن کی طرح ظاہر ہو جائے گی۔ اب اگر وہ اس کھلے کھلے فیصلہ کو منظور نہ کریں اور بھاگ جائیں اور خطا کا اقرار بھی نہ کریں تو یقیناً سمجھو کہ ان کیلئے خداتعالیٰ کی عدالت سے مندرجہ ذیل انعام ہے :
    (۱) ***
    (۲) ***
    (۳) ***
    (۴) ***
    (۵) ***
    (۶) ***
    (۷) ***
    (۸) ***
    (۹) ***
    (۱۰)* ***
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 605
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 605
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/605/mode/1up
    بسمؔ اللّٰہ الرحمن الرحیم
    نحمدہ ونصلی علٰی رسولہ الکریم
    قیامت کی نشانی
    قرب قیامت کی نشانیوں میں سے یہ ایک بڑی نشانی ہے جو اس حدیث سے معلوم ہوتی ہے جو امام بخاری اپنی صحیح میں عبداللہ بن عمرو بن العاص سے لائے ہیں اور وہ یہ ہے یُقبض العلم بقبض العلماء حتی اذا لم یبق عالم اتخذ الناس رء وسًا جُھالًا فسُءِلوا فافتوا بغیر علم فضلّوا وَ اَضلّوا۔ یعنے بباعث فوت ہو جانے علماء کے علم فوت ہو جائے گا یہاں تک کہ جب کوئی عالم نہیں ملے گا تو لوگ جاہلوں کو اپنا مقتدا اور سردار قرار دیدیں گے اور مسائل دینی کی دریافت کے لئے ان کی طرف رجوع کریں گے تب وہ لوگ بباعث جہالت اور عدم ملکہ استنباط مسائل خلاف طریق صدق و ثواب فتویٰ دیں گے پس آپ بھی گمراہ ہوں گے اور دوسروں کو بھی گمراہ کریں گے۔ اور پھر ایک اور حدیث میں ہے کہ اس زمانہ کے فتویٰ دینے والے یعنی مولوی اور محدث اورفقیہ ان تمام لوگوں سے بدتر ہوں گے جو روئے زمین پر رہتے ہوں گے۔ پھر ایک اور حدیث میں ہے کہ وہ قرآن پڑھیں گے اور قرآن ان کے حنجروں کے نیچے نہیں اترے گا یعنے اس پر عمل نہیں کریں گے۔ ایسا ہی اس زمانہ کے مولویوں کے حق میں اور بھی بہت سی حدیثیں ہیں۔ مگر اس وقت ہم بطور نمونہ صرف اس حدیث کا ثبوت دیتے ہیں جو غلط فتووں کے بارے میں ہم اوپر لکھ چکے ہیں تا ہر یک کو معلوم ہو کہ آج کل اگر مولویوں کے وجود سے کچھ فائدہ ہے تو صرف اس قدر کہ ان کے یہ لچھن دیکھ کر قیامت یاد آتی ہے اور قرب قیامت کا پتہ لگتا ہے اور حضرت خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک پیشگوئی کی پوری پوری تصدیق ہم بچشم خود مشاہدہ کرتے ہیں۔
    اس اجمال کی تفصیل یہ ہے کہ چونکہ سال گزشتہ میں بمشورہ اکثر احباب یہ بات قرار پائی تھی کہ ہماری جماعت کے لوگ کم سے کم ایک مرتبہ سال میں بہ نیت استفادہ ضروریات دین و مشورہ اعلاء کلمہ اسلام و شرع متین اس عاجز سے ملاقات کریں اور اس مشورہ کے وقت یہ بھی قرین مصلحت سمجھ کر مقرر کیا گیا تھا کہ ۲۷ دسمبر کو اس غرض سے قادیان میں آنا انسب اور اولیٰ ہے کیونکہ یہ تعطیل کے دن ہیں اور ملازمت پیشہ لوگ ان دنوں میں فرصت اور فراغت رکھتے ہیں اور بباعث ایام سرمایہ دن سفر کے مناسب حال بھی ہیں چنانچہ احباب اور مخلصین نے اس مشورہ پر اتفاق کر کے خوشی
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 606
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 606
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/606/mode/1up
    ظاہرؔ کی تھی اور کہا تھا کہ یہ بہتر ہے اب ۷ دسمبر ۱۸۹۲ ؁ء کو اسی بناء پر اس عاجز نے ایک خط بطور اشتہار کے تمام مخلصوں کی خدمت میں بھیجا جو ریاض ہند پریس قادیان میں چھپا تھا جس کے مضمون کا خلاصہ یہ تھا کہ اس جلسہ کے اغراض میں سے بڑی غرض یہ بھی ہے کہ تا ہر یک مخلص کو بالمواجہ دینی فائدہ اٹھانے کا موقع ملے اور ان کے معلومات دینی وسیع ہوں اور معرفت ترقی پذیر ہو۔ اب سنا گیا ہے کہ اس کارروائی کو بدعت بلکہ معصیت ثابت کرنے کیلئے ایک بزرگ نے ہمت کر کے ایک مولوی صاحب کی خدمت میں جو رحیم بخش نام رکھتے ہیں اور لاہور میں چینیانوالی مسجد کے امام ہیں ایک استفتا پیش کیا جس کا یہ مطلب تھا کہ ایسے جلسہ پر روز معیّن پر دور سے سفر کر کے جانے میں کیا حکم ہے اور ایسے جلسہ کیلئے اگر کوئی مکان بطور خانقاہ کے تعمیر کیا جائے تو ایسے مدد دینے والے کی نسبت کیا حکم ہے استفتا میں یہ آخری خبر اس لئے بڑھائی گئی جو مستفتی صاحب نے کسی سے سنا ہوگاجو حبی فی اللہ اخویم مولوی حکیم نور الدین صاحب نے اس مجمع مسلمانوں کیلئے اپنے صرف سے جو غالباً سات سو روپیہ یا کچھ اس سے زیادہ ہوگا قادیان میں ایک مکان بنوایا جس کی امداد خرچ میں اخویم حکیم فضل دین صاحب بھیروی نے بھی تین چار سو روپیہ دیا ہے۔ اس استفتا کے جواب میں میاں رحیم بخش صاحب نے ایک طول طویل عبارت ایک غیر متعلق حدیث شد رحال کے حوالہ سے لکھی ہے جس کے مختصر الفاظ یہ ہیں کہ ایسے جلسہ پر جانا بدعت بلکہ معصیت ہے اور ایسے جلسوں کا تجویز کرنا محدثات میں سے ہے جس کیلئے کتاب اور سنت میں کوئی شہادت نہیں۔ اور جو شخص اسلام میں ایسا امر پیدا کرے وہ مردود ہے۔
    اب منصف مزاج لوگ ایماناً کہیں کہ ایسے مولویوں اور مفتیوں کا اسلام میں موجود ہونا قیامت کی نشانی ہے یا نہیں۔ اے بھلے مانس کیا تجھے خبر نہیں کہ علم دین کیلئے سفر کرنے کے بارے میں صرف اجازت ہی نہیں بلکہ قرآن اور شارع علیہ السلام نے اس کو فرض ٹھہرا دیا ہے جس کا عمدًاتارک مرتکب کبیرہ اور عمداً انکار پر اصرار بعض صورتوں میں کفر کیا تجھے معلوم نہیں کہ نہایت تاکید سے فرمایا گیا ہے کہ طلب العلم فریضۃ علی کل مسلم و مسلمۃ اور فرمایا گیا ہے کہ اطلبوا العلم و لو کان فی الصین یعنے علم طلب کرنا ہر یک مسلمان مرد اور عورت پر فرض ہے اورعلم کوطلب کرو اگرچہ چین میں جانا پڑے۔ اب سوچو کہ جس حالت میں یہ عاجز اپنے صریح صریح اور ظاہر ظاہر الفاظ سے اشتہار میں لکھ چکا کہ یہ سفر ہر یک مخلص کا طلب علم کی نیت سے ہوگا پھر یہ فتویٰ دینا کہ جو شخص اسلام میں ایسا امر پیدا کرے وہ مردود ہے کس قدر دیانت اور امانت اور انصاف اور تقویٰ اور طہارت سے دور ہے۔ رہی یہ بات کہ ایک تاریخ مقررہ پر تمام بھائیوں کا جمع ہونا تو یہ صرف انتظام ہے اور انتظام سے کوئی کام کرنا اسلام میں کوئی مذموم امر اور بدعت نہیں انما الاعمال بالنیّات بدظنی کے مادہ فاسدہ کوذرا دور کرکے دیکھو کہ ایک تاریخ پر آنے میں کونسی بدعت ہے جبکہ ۲۷ دسمبر کو ہر یک مخلص بآسانی ہمیں مل سکتا ہے اور اس کے ضمن میں ان کی باہم ملاقات بھی ہو جاتی ہے تواس سہل طریق سے فائدہ اٹھانا کیوں حرام ہے تعجب کہ مولوی صاحب نے اس عاجز کا نام مردود تو رکھ دیا مگر آپ کووہ حدیثیں یاد نہ رہیں جن میں طلب علم کیلئے پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم نے سفر کی نسبت ترغیب دی ہے اور جن میں ایک بھائی مسلمان کی ملاقات کیلئے جانا موجب خوشنودی خدائے عزوجل قرار دیا ہے اور جن میں سفر کرکے زیارت صالحین کرنا موجب مغفرت اور کفارہ گناہاں لکھا ہے۔ اور یاد رہے کہ یہ سراسر جہالت ہے کہ شدّ رحال کی حدیث کا یہ مطلب سمجھا جائے کہ بجز قصد خانہ کعبہ یا مسجد نبوی یا بیت المقدس اور تمام سفرقطعی حرام ہیں۔ یہ بات ظاہر ہے کہ تمام
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 607
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 607
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/607/mode/1up
    مسلماؔ نوں کو مختلف اغراض کیلئے سفر کرنے پڑتے ہیں کبھی سفر طلب علم ہی کیلئے ہوتا ہے اور کبھی سفر ایک رشتہ دار یا بھائی یا بہن یا بیوی کی ملاقات کیلئے یا مثلًا عورتوں کا سفر اپنے والدین کے ملنے کیلئے یا والدین کا اپنی لڑکیوں کی ملاقات کیلئے اور کبھی مرد اپنی شادی کیلئے اور کبھی تلاش معاش کے لئے اور کبھی پیغام رسانی کے طور پر اور کبھی زیارت صالحین کیلئے سفر کرتے ہیں جیسا کہ حضرت عمررضی اللہ عنہ نے حضرت اویس قرنی کے ملنے کیلئے سفر کیا تھا اور کبھی سفر جہاد کیلئے بھی ہوتا ہے خواہ وہ جہاد تلوار سے ہو اور خواہ بطور مباحثہ کے اور کبھی سفر بہ نیت مباہلہ ہوتا ہے جیسا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے اور کبھی سفر اپنے مرشد کے ملنے کیلئے جیسا کہ ہمیشہ اولیاء کبار جن میں سے حضرت شیخ عبدالقادررضی اللہ عنہ اور حضرت بایزید بسطامی اور حضرت معین الدین چشتی اور حضرت مجدد الف ثانی بھی ہیں اکثر اس غرض سے بھی سفر کرتے رہے جن کے سفرنامے اکثر ان کے ہاتھ کے لکھے ہوئے اب تک پائے جاتے ہیں۔ اور کبھی سفر فتویٰ پوچھنے کیلئے بھی ہوتا ہے جیسا کہ احادیث صحیحہ سے اس کا جواز بلکہ بعض صورتوں میں وجوب ثابت ہوتا ہے اور امام بخاری کے سفر طلب علم حدیث کیلئے مشہور ہیں شاید میاں رحیم بخش کو خبر نہیں ہو گی اور کبھی سفر عجائبات دنیا کے دیکھنے کیلئے بھی ہوتا ہے جس کی طرف آیت کریمہ 3 ۱؂ اشارہ فرما رہی ہے اور کبھی سفر صادقین کی صحبت میں رہنے کی غرض سے جس کی طرف آیت کریمہ 33 ۔ ۲؂ ہدایت فرماتی ہے اور کبھی سفر عیادت کیلئے بلکہ اتباع خیار کیلئے بھی ہوتا ہے اور کبھی بیمار یا بیماردار علاج کرانے کی غرض سے سفر کرتا ہے اور کبھی کسی مقدمہ عدالت یا تجارت وغیرہ کیلئے بھی سفر کیا جاتا ہے اور یہ تمام قسم سفر کی قرآن کریم اور احادیث نبویہ کے رو سے جائز ہیں بلکہ زیارت صالحین اور ملاقات اخوان اور طلب علم کے سفر کی نسبت احادیث صحیحہ میں بہت کچھ حث وترغیب پائی جاتی ہے اگر اس وقت وہ تمام حدیثیں لکھی جائیں تو ایک کتاب بنتی ہے۔ ایسے فتویٰ لکھانے والے اور لکھنے والے یہ خیال نہیں کرتے کہ ان کو بھی تو اکثر اس قسم کے سفر پیش آ جاتے ہیں۔ پس اگر بجز تین مسجدوں کے اور تمام سفر کرنے حرام ہیں تو چاہیئے کہ یہ لوگ اپنے تمام رشتے ناطے اور عزیز اقارب چھوڑ کر بیٹھ جائیں اور کبھی ان کی ملاقات یا ان کی غم خواری یا ان کی بیمار پرسی کے لئے بھی سفر نہ کریں۔ میں خیال نہیں کرتا کہ بجز ایسے آدمی کے جس کو تعصب اور جہالت نے اندھا کر دیا ہو وہ ان تمام سفروں کے جواز میں متامّل ہو سکے صحیح بخاری کا صفحہ ۱۶ کھول کر دیکھو کہ سفر طلب علم کیلئے کس قدر بشارت دی گئی ہے اور وہ یہ ہے کہ مَنْ سلک طریقًا یطلب بہ علمًا سھّل اللّٰہ لہ طریق الجنّۃ یعنے جو شخص طلب علم کیلئے سفر کرے اور کسی راہ پر چلے تو خدا تعالیٰ بہشت کی راہ اس پر آسان کر دیتا ہے۔ اب اے ظالم مولوی ذرا انصاف کر کہ تُو نے اپنے بھائی کا نام جو تیری طرح کلمہ گو اہل قبلہ اور اللہ رسول پر ایمان لاتا ہے مردود رکھا اور خدا تعالیٰ کی رحمت اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی شفاعت سے بکلی محروم قرار دیا اور اس صحیح حدیث بخاری کی بھی کچھ پروا نہ کی کہ اسعد النّاس بشفاعتی یوم القیامۃ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 608
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 608
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/608/mode/1up
    منؔ قال لا الہ الا اللّٰہ خالصًا من قلبہ او نفسہ اور مردود ٹھہرانے کی اپنے فتویٰ میں وجہ یہ ٹھہرائی کہ ایسا اشتہار کیوں شائع کیا اور لوگوں کو جلسہ پر بلانے کیلئے کیوں دعوت کی۔ اے ناخدا ترس ذرا آنکھ کھول اور پڑھ کہ اس اشتہار ۷ دسمبر ۱۸۹۲ ؁ء کا کیا مضمون ہے کیا اپنی جماعت کو طلب علم اور حل مشکلات دین اور ہمدردی اسلام اور برادرانہ ملاقات کیلئے بلایا ہے یا اس میں کسی اور میلہ تماشا اور راگ اور سرود کا ذکر ہے۔ اے اس زمانہ کے ننگ اسلام مولویو تم اللہ جلّ شانہٗ سے کیوں نہیں ڈرتے کیا ایک دن مرنا نہیں یا ہریک مواخذہ تم کو معاف ہے حق بات کو سن کر اور اللہ اور رسول کے فرمودہ کو دیکھ کر تمہیں یہ خیال تو نہیں آتا کہ اب اپنی ضد سے باز آجائیں بلکہ مقدمہ باز لوگوں کی طرح یہ خیال آتا ہے کہ آؤ کسی طرح باتوں کو بناکر اس کا رد چھاپیں تا لوگ نہ کہیں کہ ہمارے مولوی صاحب کو کچھ جواب نہ آیا۔ اس قدر دلیری اور بددیانتی اور یہ بخل اور بغض کس عمر کیلئے۔ آپ کو فتویٰ لکھنے کے وقت وہ حدیثیں یاد نہ رہیں جن میں علم دین کیلئے اور اپنے شبہات دور کرنے کیلئے اور اپنے دینی بھائی اور عزیزوں کو ملنے کیلئے سفر کرنے کو موجب ثواب کثیر و اجر عظیم قرار دیا ہے بلکہ زیارت صالحین کیلئے سفر کرنا قدیم سے سنت سلف صالح چلی آئی ہے اور ایک حدیث میں ہے کہ جب قیامت کے دن ایک شخص اپنی بد اعمالی کی وجہ سے سخت مواخذہ میں ہوگا تو اللہ جلّ شانُہٗ اس سے پوچھے گا کہ فلاں صالح آدمی کی ملاقات کیلئے کبھی تو گیا تھا۔ تو وہ کہے گا بالارادہ تو کبھی نہیں گیا مگر ایک دفعہ ایک راہ میں اس کی ملاقات ہوگئی تھی تب خدا تعالیٰ کہے گا کہ جا بہشت میں داخل ہو۔ میں نے اسی ملاقات کی وجہ سے تجھے بخش دیا۔ اب اے کوتہ نظر مولوی ذرہ نظر کر کہ یہ حدیث کس بات کی ترغیب دیتی ہے۔ اور اگر کسی کے دل میں یہ دھوکہ ہو کہ اس دینی جلسہ کیلئے ایک خاص تاریخ کیوں مقرر کی۔ ایسا فعل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یا صحابہ رضی اللہ عنہم سے کب ثابت ہے تو اس کا جواب یہ ہے کہ بخاری اور مسلم کو دیکھو کہ اہل بادیہ آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کی خدمت میں مسائل کے دریافت کرنے کیلئے اپنی فرصت کے وقتوں میں آیا کرتے تھے اور بعض خاص خاص مہینوں میں ان کے گروہ فرصت پاکر حاضر خدمت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہوا کرتے تھے اور صحیح بخاری میں ابی جمرہ سے روایت ہے۔ قال ان وفد عبدالقیس اتوا النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم قالوا اِنا نأتیک من شقۃ بعیدۃ و لا نستطیع ان نأتیک الّا فی شھر حرام۔ یعنے ایک گروہ قبیلہ عبدالقیس کے پیغام لانے والوں کا جو اپنی قوم کی طرف سے آئے تھے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا اور کہا کہ ہم لوگ دور سے سفر کر کے آتے ہیں اور بجز حرام مہینوں کے ہم حاضر خدمت نہیں ہوسکتے اور ان کے قول کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے رد نہیں کیا اور قبول کیا پس اس حدیث سے بھی یہ مسئلہ مستنبط ہوتا ہے کہ جو لوگ طلب علم یا دینی ملاقات کیلئے کسی اپنے مقتدا کی خدمت میں حاضر ہونا چاہیں وہ اپنی گنجائش فرصت کے لحاظ سے ایک تاریخ مقرر کر سکتے ہیں جس تاریخ میں وہ بآسانی اور بلا حرج حاضر ہو سکیں اور یہی صورت ۲۷ دسمبر کی تاریخ میں ملحوظ ہے کیونکہ وہ دن تعطیلوں کے ہوتے ہیں اور ملازمت پیشہ لوگ بہ سہولت ان دنوں میں آ سکتے ہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 609
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 609
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/609/mode/1up
    اور ؔ خدا تعالیٰ قرآن شریف میں فرماتا ہے کہ اس دین میں کوئی حرج کی بات نہیں رکھی گئی یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ اگر مثلًاکسی تدبیر یا انتظام سے ایک کام جو دراصل جائز اور روا ہے سہل اور آسان ہوسکتا ہے تو وہی تدبیر اختیار کرلو کچھ مضائقہ نہیں۔ ان باتوں کا نام بدعت رکھنا ان اندھوں کا کام ہے جن کو نہ دین کی عقل دی گئی اور نہ دنیا کی۔ امام بخاری نے اپنی صحیح میں کسی دینی تعلیم کی مجلس پر تاریخ مقرر کرنے کیلئے ایک خاص باب منعقد کیا ہے جس کا یہ عنوان ہے من جعل لاھل العلم ایّامًا معلومۃ یعنے علم کے طالبوں کے افادہ کیلئے خاص دنوں کو مقرر کرنا بعض صحابہ کی سنت ہے۔ اس ثبوت کیلئے امام موصوف اپنی صحیح میں ابی وایل سے یہ روایت کرتے ہیں کان عبداللّٰہ یذکّر الناس فی کل خمیس یعنی عبداللہ نے اپنے وعظ کیلئے جمعرات کا دن مقرر کر رکھا تھا۔ اور جمعرات میں ہی اس کے وعظ پر لوگ حاضر ہوتے تھے۔ یہ بھی یاد رہے کہ اللہ جلّ شانہٗ نے قرآن کریم میں تدبیر اور انتظام کیلئے ہمیں حکم فرمایا ہے اور ہمیں مامور کیا ہے کہ جو احسن تدبیر اور انتظام خدمت اسلام کیلئے ہم قرین مصلحت سمجھیں اور دشمن پر غالب ہونے کیلئے مفید خیال کریں وہی بجا لاویں جیسا کہ وہ عزّاسمہ‘ فرماتا ہے ۔3 ۱؂ ۔ یعنے دینی دشمنوں کیلئے ہر یک قسم کی طیاری جو کرسکتے ہو کرو اور اعلاء کلمہ اسلام کیلئے جو قوت لگا سکتے ہو لگاؤ۔ اب دیکھو کہ یہ آیت کریمہ کس قدر بلند آواز سے ہدایت فرما رہی ہے کہ جو تدبیریں خدمت اسلام کیلئے کارگر ہوں سب بجا لاؤ اور تمام قوت اپنے فکر کی اپنے بازو کی اپنی مالی طاقت کی اپنے حسن انتظام کی اپنی تدبیر شائستہ کی اس راہ میں خرچ کرو۔ تا تم فتح پاؤ۔ اب نادان اور اندھے اور دشمن دین مولوی اس صرف قوّت اور حکمت عملی کا نام بدعت رکھتے ہیں۔ اس وقت کے یہ لوگ عالم کہلاتے ہیں جن کو قرآن کریم کی ہی خبر نہیں۔ انا للّٰہ و انا الیہ راجعون۔
    اس آیت موصوفہ بالا پر غور کرنے والے سمجھ سکتے ہیں کہ برطبق حدیث نبوی کہ انما الاعمال بالنیات کوئی احسن انتظام اسلام کی خدمت کیلئے سوچنا بدعت اور ضلالت میں داخل نہیں ہے جیسے جیسے بوجہ تبدل زمانہ کے اسلام کو نئی نئی صورتیں مشکلات کی پیش آتی ہیں یا نئے نئے طور پر ہم لوگوں پر مخالفوں کے حملے ہوتے ہیں ویسی ہی ہمیں نئی تدبیریں کرنی پڑتی ہیں پس اگرحالت موجودہ کے موافق ان حملوں کے روکنے کی کوئی تدبیر اور تدارک سوچیں تو وہ ایک تدبیر ہے بدعات سے اس کو کچھ تعلق نہیں اور ممکن ہے کہ بباعث انقلاب زمانہ کے ہمیں بعض ایسی نئی مشکلات پیش آجائیں جو ہمارے سید و مولیٰ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو بھی اس رنگ اور طرز کی مشکلات پیش نہ آئی ہوں مثلاً ہم اس وقت کی لڑائیوں میں پہلی طرز کو جو مسنون ہے اختیار نہیں کر سکتے کیونکہ اس زمانہ میں طریق جنگ و جدل بالکل بدل گیا ہے اور پہلے ہتھیار بیکار ہوگئے اور نئے ہتھیار لڑائیوں کے پیدا ہوئے اب اگر ان ہتھیاروں کو پکڑنا اور اٹھانا اور ان سے کام لینا ملوک اسلام بدعت سمجھیں اور میاں رحیم بخش جیسے مولوی کی بات پر کان دھر کے ان اسلحہ جدیدہ کا استعمال کرنا ضلالت اور معصیت خیال کریں اور یہ کہیں کہ یہ وہ طریق جنگ ہے کہ نہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اختیار کیا اور نہ صحابہ اور تابعین نے تو فرمائیے کہ بجز اس کے کہ ایک ذلت کے ساتھ اپنی ٹوٹی پھوٹی سلطنتوں سے الگ کئے جائیں اور دشمن فتح یاب ہو جائے کوئی اور بھی اس کا نتیجہ ہوگا۔ پس ایسے مقامات تدبیر اور انتظام میں خواہ وہ مشابہ جنگ و جدل ظاہری ہو یا باطنی۔ اور خواہ تلوار کی لڑائی ہو یا قلم کی۔ ہماری ہدایت پانے کیلئے یہ آیت کریمہ موصوفہ بالا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 610
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 610
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/610/mode/1up
    کافی ؔ ہے یعنے یہ کہ3 ۱؂ اللہ جلّ شانہٗ اس آیت میں ہمیں عام اختیار دیتا ہے کہ دشمن کے مقابل پر جو احسن تدبیر تمہیں معلوم ہو اور جو طرز تمہیں موثر اور بہتر دکھائی دے وہی طریق اختیار کرو پس اب ظاہر ہے کہ اس احسن انتظام کا نام بدعت اور معصیت رکھنا اور انصار دین کو جو دن رات اعلاء کلمہ اسلام کے فکر میں ہیں جن کی نسبت آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہحب الانصار من الایمان ان کو مردود ٹھہرانا نیک طینت انسانوں کا کام نہیں ہے بلکہ درحقیقت یہ ان لوگوں کا کام ہے جنکی روحانی صورتیں مسخ شدہ ہیں اور اگر یہ کہو کہ یہ حدیث کہ حب الانصار من الایمان۔ و بغض الانصار من النفاق یعنے انصار کی محبت ایمان کی نشانی اور انصار سے بغض رکھنا نفاق کی نشانی ہے یہ ان انصار کے حق میں ہے جو مدینہ کے رہنے والے تھے نہ عام اور تمام انصار۔ تو اس سے یہ لازم آئیگا کہ جو اس زمانہ کے بعد انصار رسول اللہ ہوں ان سے بغض رکھنا جائز ہے نہیں نہیں بلکہ یہ حدیث گو ایک خاص گروہ کیلئے فرمائی گئی مگر اپنے اندر عموم کا فائدہ رکھتی ہے جیسا کہ قرآن کریم میں اکثر آیتیں خاص گروہ کیلئے نازل ہوئیں مگر ان کا مصداق عام قرار دیا گیا ہے غرض ایسے لوگ جو مولوی کہلاتے ہیں انصار دین کے دشمن اور یہودیوں کے قدموں پر چل رہے ہیں۔ مگر ہمارا یہ قول کلی نہیں ہے راستباز علماء اس سے باہر ہیں صرف خاص مولویوں کی نسبت یہ لکھا گیا ہے۔ ہر یک مسلمان کو دعا کرنا چاہیئے کہ خداتعالیٰ جلد اسلام کو ان خائن مولویوں کے وجود سے رہائی بخشے۔ کیونکہ اسلام پر اب ایک نازک وقت ہے اور یہ نادان دوست اسلام پر ٹھٹھا اور ہنسی کرانا چاہتے ہیں اور ایسی باتیں کرتے ہیں جو صریح ہریک شخص کے نور قلب کو خلاف صداقت نظر آتی ہیں۔ امام بخاری پر اللہ تعالیٰ رحمت کرے انہوں نے اس بارے میں بھی اپنی کتاب میں ایک باب باندھا ہے چنانچہ وہ اس باب میں لکھتے ہیں قال علی رضی اللّٰہ عنہ حدثوا الناس بما یعرفون أ تحبون ان یکذب اللّٰہ و رسولہ اور بخاری کے حاشیہ میں اس کی شرح میں لکھا ہے ای تکلموا الناس علی قدر عقولہم یعنی لوگوں سے اللہ اور رسولؐ کے فرمودہ کی وہ باتیں کرو جو ان کوسمجھ جائیں اور ان کو معقول دکھائی دیں خواہ نخواہ اللہ رسول کی تکذیب مت کراؤ۔ اب ظاہر ہے کہ جو مخالف اس بات کو سنے گا کہ مولوی صاحبوں نے یہ فتویٰ دیا ہے کہ بجز تین مسجدوں یا ایک دو اور محل کے اور کسی طرف سفر جائز نہیں ایسا مخالف اسلام پر ہنسے گا اور شارع علیہ السلام کی تعلیم میں نقص نکالنے کیلئے اس کو موقع ملے گا اس کو یہ تو خبر نہیں ہوگی کہ کسی بخل کی بناء پر یہ صرف مولوی کی شرارت ہے یا اس کی بیوقوفی ہے وہ تو سیدھا ہمارے سید و مولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم پر حملہ آورہوگا جیسا کہ انہیں مولویوں کی ایسی ہی کئی مفسدانہ باتوں سے عیسائیوں کو بہت مدد پہنچ گئی مثلاً جب مولویوں نے اپنے منہ سے اقرار کیا کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم تو نعوذ باللہ مردہ ہیں مگر حضرت عیسیٰ قیامت تک زندہ ہیں تو وہ لوگ اہل اسلام پر سوار ہوگئے اور ہزاروں سادہ لوحوں کو انہوں نے انہیں باتوں سے گمراہ کیا اور ان بے تمیزوں نے یہ نہیں سمجھا کہ انبیاء تو سب زندہ ہیں مردہ تو ان میں سے کوئی بھی نہیں۔ معراج کی رات آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو کسی کی لاش نظر نہ آئی سب زندہ تھے۔ دیکھئے اللہ جلّ شانہٗ اپنے نبی کریمؐ کو حضرت موسیٰ علیہ السلام کی زندگی کی قرآن کریم میں خبر دیتا ہے اور فرماتا ہے33۲؂ اور خود
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 611
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 611
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/611/mode/1up
    آنحضرؔ ت صلی اللہ علیہ وسلم فوت ہونے کے بعد اپنا زندہ ہو جانا اور آسمان پر اٹھائے جانا اور رفیق اعلیٰ کو جا ملنا بیان فرماتے ہیں پھر حضرت مسیح کی زندگی میں کونسی انوکھی بات ہے جو دوسروں میں نہیں۔ معراج کی رات میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے تمام نبیوں کو برابر زندہ پایا اور حضرت عیسیٰ کو حضرت یحییٰ کے ساتھ بیٹھا ہوا دیکھا۔ خداتعالیٰ مولوی عبدالحق محدث دہلوی پر رحمت کرے وہ ایک محدث وقت کا قول لکھتے ہیں کہ ان کا یہی مذہب ہے کہ اگر کوئی مسلمان ہو کر کسی دوسرے نبی کی حیات کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات سے قوی تر سمجھے تو وہ دائرہ اسلام سے خارج ہے یا شاید یہ لکھا ہے کہ قریب ہے کہ وہ کافر ہو جائے لیکن یہ مولوی ایسے فتنوں سے باز نہیں آتے اور محض اس عاجز سے مخالفت ظاہر کرنے کیلئے دین سے نکلتے جاتے ہیں خداتعالیٰ ان سب کو صفحہ زمین سے اٹھا لے تو بہتر ہے تا دین اسلام ان کی تحریفوں سے بچ جائے ذرا انصاف کرنے کامحل ہے کہ صدہا لوگ طلب علم یا ملاقات کیلئے نذیر حسین خشک معلم کے پاس دہلی میں جائیں اور وہ سفر جائز ہو۔ اور پھر خود نذیر حسین صاحب بٹالوی صاحب کا ولیمہ کھانے کیلئے بدیں عمر و پیرانہ سالی دو سو کوس کا سفر اختیار کر کے بٹالہ میں پہنچیں اور وہ سفر بالکل روا ہو اور پھر شیخ بٹالوی صاحب سال بسال انگریزوں کے ملنے کیلئے شملہ کی طرف دوڑتے جائیں تا دنیوی عزت حاصل کرلیں اور وہ سفر ممنوع اور حرام شمار نہ کیا جائے۔ اور ایسا ہی بعض مولوی وعظ کا نام لیکر پیٹ بھرنے کیلئے مشرق اور مغرب کی طرف گھومتے پھریں اور وہ سفر جائے اعتراض نہ ہو اور کوئی ان لوگوں پر بدعتی اور بد اعمال اور مردود ہونے کے فتوے نہ دے مگر جبکہ یہ عاجز باذن و امر الٰہی دعوت حق کیلئے مامور ہو کر طلب علم کیلئے اپنی جماعت کے لوگوں کو بلاوے تو وہ سفر حرام ہو جائے اور یہ عاجز اس فعل کی وجہ سے مردود کہلاوے کیا یہ تقویٰ اور خدا ترسی کا طریق ہے۔ افسوس کہ یہ نادان یہ بھی نہیں جانتے کہ تدبیر اور انتظام کو بدعات کی مدمیں داخل نہیں کر سکتے۔ ہر یک وقت اور زمانہ انتظامات جدیدہ کو چاہتا ہے۔ اگر مشکلات کی جدید صورتیں پیش آویں تو بجز جدید طور کی تدبیروں کے اور ہم کیا کر سکتے ہیں۔ پس کیا یہ تدبیریں بدعات میں داخل ہو جائیں گی جب اصل سنت محفوظ ہو اور اسی کی حفاظت کیلئے بعض تدابیر کی ہمیں حاجت پڑے تو کیا وہ تدابیر بدعت کہلائیں گی معاذ اللہ ہرگز نہیں، بدعت وہ ہے جو اپنی حقیقت میں سنت نبویہ کے معارض اور نقیض واقع ہو اور آثار نبویہ میں اس کام کے کرنے کے بارے میں زجر اور تہدید پائی جائے۔ اور اگر صرف جدت انتظام اور نئی تدبیر پر بدعت کا نام رکھنا ہے تو پھر اسلام میں بدعتوں کو گنتے جاؤ کچھ شمار بھی ہے۔ علم صرف بھی بدعت ہو گا اور علم نحو بھی اور علم کلام بھی اور حدیث کا لکھنا اور اس کا مبوّب اور مرتب کرنا سب بدعات ہوں گے ایسا ہی ریل کی سواری میں چڑھنا کلوں کا کپڑاپہننا ڈاک میں خط ڈالنا، تار کے ذریعہ سے کوئی خبر منگوانا اور بندوق اور توپوں سے لڑائی کرنا تمام یہ کام بدعات میں داخل ہوں گے بلکہ بندوق اور توپوں سے لڑائی کرنا نہ صرف بدعت بلکہ ایک گناہ عظیم ٹھہرے گا کیونکہ ایک حدیث صحیح میں ہے کہ آگ کے عذاب سے کسی کو ہلاک کرنا سخت ممنوع ہے۔ صحابہ سے زیادہ سنت کا متبع کون ہو سکتا ہے مگر انہوں نے بھی سنت کے وہ معنی نہ سمجھے جو میاں رحیم بخش نے سمجھے۔ انہوں نے تدبیر اور انتظام کے طور پر بہت سے ایسے جدید کام کئے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 612
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 612
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/612/mode/1up
    کہؔ جو نہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمائے اور نہ قرآن کریم میں وارد ہوئے۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی محدثات ہی دیکھو جن کا ایک رسالہ بنتا ہے۔ اسلام کیلئے ہجری تاریخ انہوں نے مقرر کی اور شہروں کی حفاظت کیلئے کوتوال مقرر کئے اور بیت المال کیلئے ایک باضابطہ دفتر تجویز کیا۔ جنگی فوج کیلئے قواعد رخصت اور حاضری ٹھہرائے اور ان کے لڑنے کے دستور مقرر کئے اور مقدمات مال وغیرہ کے رجوع کیلئے خاص خاص ہدایتیں مرتب کیں اور حفاظت رعایا کیلئے بہت سے قواعد اپنی طرف سے تجویز کرکے شائع کئے اور خود کبھی کبھی اپنے عہد خلافت میں پوشیدہ طور پر رات کو پھرنا اور رعایا کا حال اس طرح سے معلوم کرنا اپنا خاص کام ٹھہرایا لیکن کوئی ایسا نیا کام اس عاجز نے تو نہیں کیا صرف طلب علم اور مشورہ امداد اسلام اور ملاقات اخوان کے لئے یہ جلسہ تجویز کیا۔ رہا مکان کا بنانا تو اگر کوئی مکان بہ نیّت مہمانداری اور بہ نیت آرام ہر یک صادر و وارد بنانا حرام ہے تو اس پر کوئی حدیث یا آیت پیش کرنی چاہیئے اور اخویم حکیم نور الدین صاحب نے کیا گناہ کیا کہ محض للہ اس سلسلہ کی جماعت کیلئے ایک مکان بنوا دیا جو شخص اپنی تمام طاقت اور اپنے مال عزیز سے دین کی خدمت کر رہا ہے اس کو جائے اعتراض ٹھہرانا کس قسم کی ایمانداری ہے۔ اے حضرات مرنے کے بعد معلوم ہوگا ذرا صبر کرو وہ وقت آتا ہے کہ ان سب منہ زوریوں سے سوال کئے جاؤ گے۔ آپ لوگ ہمیشہ یہ حدیث پڑھتے ہیں کہ جس نے اپنے وقت کے امام کو شناخت نہ کیا اور مر گیا وہ جاہلیت کی موت پر مرا لیکن اس کی آپ کو کچھ بھی پرواہ نہیں کہ ایک شخص عین وقت پر یعنے چودھویں صدی کے سر پر آیا اور نہ صرف چودھویں صدی بلکہ عین ضلالت کے وقت اور عیسائیت اور فلسفہ کے غلبہ میں اس نے ظہور کیا اور بتلایا کہ میں امام وقت ہوں اور آپ لوگ اس کے منکر ہوگئے اور اس کا نام کافر اور دجال رکھا اور اپنے بد خاتمہ سے ذرا خوف نہ کیا اور جاہلیت پر مرنا پسند کیا۔ اللہ تعالیٰ نے ہدایت کی تھی کہ تم پنج وقت نمازوں میں یہ دعا پڑھا کرو کہ33 ۱؂ یعنے اے ہمارے خدا اپنے منعم علیہم بندوں کی ہمیں راہ بتا وہ کون ہیں۔ نبی اور صدیق اور شہید اور صلحاء۔ اس دعا کا خلاصہ مطلب یہی تھا کہ ان چاروں گروہوں میں سے جس کا زمانہ تم پاؤ اس کے سایہ صحبت میں آجاؤ۔ اور اس سے فیض حاصل کرو لیکن اس زمانہ کے مولویوں نے اس آیت پر خوب عمل کیا۔ آفرین آفرین میں ان کو کس سے تشبیہہ دوں وہ اس اندھے سے مشابہ ہیں جو دوسروں کی آنکھوں کا علاج کرنے کیلئے بہت زور کے ساتھ لاف و گذاف مارتا ہے اور اپنی نابینائی سے غافل ہے۔
    بالآخر میں یہ بھی ظاہر کرتا ہوں کہ اگر مولوی رحیم بخش صاحب اب بھی اس فتویٰ سے رجوع نہ کریں تو میں ان کو اللہ جلّ شانہٗ کی قسم دیتا ہوں کہ اگر وہ طالب حق ہیں تو اس بات کے تصفیہ کیلئے میرے پاس قادیان میں آجائیں میں ان کی آمد و رفت کا خرچ دے دوں گا اور ان پر کتابیں کھول کر اور قرآن اور حدیث دکھلا کر ثابت کر دوں گا کہ یہ فتویٰ ان کا سراسر باطل اور شیطانی اغواء سے ہے۔ والسلام علیٰ من اتبع الہدیٰ۔
    (۱۷دسمبر ۱۸۹۲ ؁ء) خاکسار غلام احمد از قادیان ضلع گورداسپور
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 613
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 613
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/613/mode/1up
    بسمؔ اللّٰہ الرحمٰن الرحیم
    نحمدہ ونصلّی
    کیفیّت جلسہ ۲۷ دسمبر ۱۸۹۲ ؁ء بمقام
    قادیان ضلع
    گورداسپورہ
    اس جلسہ کے موقع پراگرچہ پانسو کے قریب لوگ جمع ہوگئے تھے لیکن وہ احباب اور مخلص جو محض للہ شریک جلسہ ہونے کیلئے دور دور سے تشریف لائے ان کی تعداد قریب تین سو پچیس کے پہنچ گئی تھی۔
    اب جلسہ کے ایّام میں جو کارروائیاں ہوئیں ان کا ہم ذکر کرتے ہیں۔ پہلے حضرت حکیم مولوی نور الدین صاحب نے قرآن شریف کی ان آیات کریمہ کی تفسیر بیان کی جس میں یہ ذکر ہے کہ مریم صدیقہ کیسی صالحہ اور عفیفہ تھیں اور ان کے برگزیدہ فرزند حضرت عیسیٰ علیہ السلام پر کیا کیا خداتعالیٰ نے احسان کیا اور کیونکر وہ اس فانی دنیا سے انتقال کر کے اور سنت اللہ کے موافق موت کا پیالہ پی کر خدا تعالیٰ کے اس دارالنعیم میں پہنچ گئے جس میں ان سے پہلے حضرت یحییٰ حصور
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 614
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 614
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/614/mode/1up
    اور ؔ دوسرے مقدّس نبی پہنچ چکے تھے اس تقریر کے ضمن میں مولوی صاحب موصوف نے بہت سے حقائق معارف قرآن کریم بیان فرمائے جن سے حاضرین پر بڑا اثر پڑا اور مولوی صاحب نے بڑی صفائی سے اس بات کا ثبوت دے دیا کہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام درحقیقت اس عالم سے رحلت فرما ہوگئے ہیں اور ان کے زندہ ہونے کا خیال عبث اور باطل اور سراسر مخالف نصوص بیّنہ قرآن کریم و احادیث صحیحہ ہے اور ان کے نزول کی امید رکھنا طمع خام ہے اور یہ بھی فرمایا کہ اگرچہ بہت سی حدیثوں میں نزول کی خبر دی گئی ہے مگر وہ نزول اور رنگ میں ہے یعنے تجوّز اور استعارہ کے طور پر نزول ہے نہ حقیقی نزول۔ کیونکہ حقیقی نزول تو نصوص صریحہ بیّنہ قرآن کریم اور احادیث صحیحہ سے مخالف پڑا ہوا ہے۔ جس کی طرف قدم اٹھانا گویا خدا تعالیٰ کی خبر میں شک کرنا ہے مولوی صاحب کے وعظ کے بعد سیّد حامد شاہ صاحب سیالکوٹی نے ایک قصیدہ مدحیہ سنایا۔
    اس تقریر کے بعد حضرت اقدس مرزا صاحب کی مختصر تقریر تھی جس میں علماء حال کی چند ان باتوں کا جواب دیا گیا جو اُن کے نزدیک بنیاد تکفیر ہیں اور اسی کے ساتھ اپنے مسیح موعود ہونے کا آسمانی نشانوں کے ذریعہ سے ثبوت دیا گیا اور حاضرین کو اس پیشگوئی کے پورا ہو جانے سے اطلاع دی گئی جو پرچہ نور افشاں دہم مئی ۱۸۸۸ ؁ء میں شائع ہوئی تھی اور مختلف وقتوں میں حجت پوری کرنے کے لئے سمجھا دیا گیا کہ اس پیشگوئی کا پورا ہونا درحقیقت صداقت دعویٰ پر ایک نشان ہے کیونکہ یہ پیشگوئی محض اس لئے ظاہر کی گئی ہے کہ جن صاحبوں کو شک ہے کہ حضرت مرزا صاحب منجانب اللہ( نہیں) ہیں۔ ان کے لئے اس دعویٰ پر یہ ایک دلیل ہو جو
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 615
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 615
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/615/mode/1up
    خداؔ تعالیٰ کی طرف سے ان پر قائم ہو اور یہ دلیل قطعی ہے کیونکہ جو شخص اپنے دعویٰ منجانب اللہ ہونے میں کاذب ہو اس کی پیشگوئی بموجب تعلیم قرآن کریم اور توریت کے سچی نہیں ٹھہر سکتی وجہ یہ کہ اگر خدا تعالیٰ کاذب کے دعویٰ دروغ پر کوئی پیشگوئی اس کی سچی کر دیوے تو پھر دعویٰ کا سچا ہونا لازم آتا ہے اور اس سے خلق اللہ دھوکہ میں پڑتی ہے۔ پھر اس کے بعد حضرت اقدس مرزا صاحب نے اپنی جماعت کے احباب کی باہمی محبت اور تقویٰ اور طہارت کے بارے میں مناسب وقت چند نصیحتیں کیں۔
    پھر اس کے بعد ۲۸ دسمبر ۱۸۹۲ ؁ء کو یورپ اور امریکہ کی دینی ہمدردی کے لئے معزز حاضرین نے اپنی اپنی رائے پیش کی۔ اور یہ قرار پایا کہ ایک رسالہ جو اہم ضروریات اسلام کا جامع اور عقائد اسلام کا خوبصورت چہرہ معقولی طور پر دکھاتا ہو تالیف ہو کر اور پھر چھاپ کر یورپ اور امریکہ میں بہت سی کاپیاں اس کی بھیج دی جائیں۔ بعد اس کے قادیان میں اپنا مطبع قائم کرنے کے لئے تجاویز پیش ہوئیں اور ایک فہرست ان صاحبوں کے چندہ کی مرتب کی گئی جو اعانت مطبع کیلئے بھیجتے رہیں گے یہ بھی قرار پایا کہ ایک اخبار اشاعت اور ہمدردی اسلام کے لئے جاری کیا جائے اور یہ بھی تجویز ہوا کہ حضرت مولوی سیّد محمد احسن صاحب امروہی اس سلسلہ کے واعظ مقرر ہوں اور وہ پنجاب اور ہندوستان کا دورہ کریں بعد اسکے دعائے خیر کی گئی۔ آئندہ بھی ہمیشہ اس سالانہ جلسہ کے یہی مقاصد رہیں گے کہ اشاعت اسلام اور ہمدردی نو مسلمین امریکہ اور یورپ کے لئے احسن تجاویز سوچی جائیں اور دنیا میں نیک چلنی اور نیک نیتی اور تقویٰ اور طہارت اور اخلاقی حالات کے ترقی دینے اور اخلاق اور عادات دنیّہ اور رسوم قبیحہ کو
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 616
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 616
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/616/mode/1up
    قومؔ میں سے دور کرنے اور اس گورنمنٹ برطانیہ کا سچا شکر گذار اور قدردان بننے کی کوششیں اور تدبیریں کی جائیں۔ ان اغراض کے پورا کرنے اور دیگر انتظامات کی غرض سے ایک کمیٹی بھی تجویز کی گئی جس کے صدر پریذیڈنٹ حضرت مولوی نور الدین صاحب بھیروی اور سیکرٹری مرزا خدا بخش صاحب اتالیق جناب خان صاحب محمد علی خان صاحب رئیس مالیر کوٹلہ اور شیخ رحمت اللہ صاحب میونسپل کمشنر گجرات۔ منشی غلام قادر صاحب فصیح وائس پریذیڈنٹ و میونسپل کمشنر سیالکوٹ اور مولوی عبدالکریم صاحب سیالکوٹی قرار دئیے گئے۔
    ذیل میں ان احباب کے نام لکھے جاتے ہیں جو اس جلسہ میں شریک ہوئے:۔
    (ا) مولوی حکیم نور الدین صاحب بھیرہ ضلع شاہ پور
    (۲) حکیم فضل الدین صاحب //
    (۳) میاں حافظ محمد صاحب //
    (۴) میاں عبدالرحمن صاحب //
    (۵) میاں نجم الدین صاحب
    (۶) سید قاضی امیر حسین صاحب پروفیسر عربی مدرسہ امرتسر //
    (۷) میاں حسن محمد صاحب زمیندار //
    (۸) مولوی عبدالکریم صاحب سیالکوٹ
    (۹) میاں مولا بخش صاحب بوٹ فروش //
    (۱۰) میاں فضل کریم صاحب سیالکوٹ
    (۱۱) ماسٹر اللہ دتا صاحب ٹیچر سیالکوٹ
    (۱۲) میاں شادی خاں صاحب ملازم راجہ امر سنگھ صاحب بہادر سیالکوٹ
    (۱۳) سید نواب شاہ صاحب مدرس امریکن مشن سکول۔ سیالکوٹ
    (۱۴) سید امیر علی شاہ صاحب مدرس ساکن سیّداں والی ضلع سیالکوٹ
    (۱۵) منشی الہ دین صاحب سیالکوٹ
    (۱۶) چوہدری محمد سلطان صاحب میونسپل کمشنر سیالکوٹ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 617
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 617
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/617/mode/1up
    (۱۷ؔ ) مولوی ابو یوسف محمد مبارک علی صاحب سیالکوٹ
    (۱۸) میر حامد شاہ صاحب اہلمد معافیات سیالکوٹ
    (۱۹) منشی غلام قادر صاحب فصیح وائس پریذیڈنٹ میونسپل کمیٹی سیالکوٹ
    (۲۰) میاں فصل الدین صاحب زرگر سیالکوٹ
    (۲۱) سید خصلت علی شاہ صاحب ڈپٹی انسپکٹر پولیس کڑیانوالہ ضلع گجرات
    (۲۲) میاں فتح الدین صاحب گجرات
    (۲۳) منشی غلام محمد صاحب طالب العلم ٹریننگ کالج لاہور۔ (سیالکوٹ)
    (۲۴) منشی گلاب خان صاحب نقشہ نویس سیالکوٹ
    (۲۵) میاں نور دین صاحب طالبعلم سیالکوٹ
    (۲۶) مولوی قطب الدین صاحب بدوملی
    (۲۷) چوہدری سرفراز خان صاحب نمبردار بدوملی ضلع سیالکوٹ۔
    (۲۸) میاں محمد دین صاحب ملازم پولیس سیالکوٹ
    (۲۹) سید محمود شاہ صاحب سیالکوٹ
    (۳۰) میاں امام الدین صاحب نوشہرہ۔
    (۳۱) میاں اللہ بخش صاحب قصاب چھاؤنی سیالکوٹ
    (۳۲) سید امیر علی شاہ صاحب سارجنٹ پولیس سیالکوٹ
    (۳۳) حکیم شیخ قادر بخش صاحب احمد آباد ضلع جہلم
    (۳۴) حافظ سراج الدین صاحب عیسیٰ وال ضلع جہلم
    (۳۵) میاں شرف الدین صاحب زمیندار کوٹلہ فقیر ضلع جہلم
    (۳۶) میاں عیدا صاحب زمیندار کوٹلہ فقیر ضلع جہلم
    (۳۷) میاں قطب الدین صاحب کوٹلہ فقیر ضلع جہلم
    (۳۸) میاں علی محمد صاحب امام مسجد // //
    (۳۹) مولوی برہان الدین صاحب محلہ
    نو ضلع جہلم
    (۴۰) میاں نظام الدین صاحب محلہ خوجیاں ضلع جہلم
    (۴۱) میاں محمد امین صاحب بزاز چکوال (راولپنڈی)
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 618
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 618
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/618/mode/1up
    (۴۲ؔ ) منشی گلاب دین صاحب رہتاس
    ضلع جہلم
    (۴۳) میاں اللہ دتا صاحب ؍؍ ؍؍
    (۴۴) منشی غلام حسین صاحب ؍؍ ؍؍
    (۴۵) منشی محمد حسین صاحب ملازم ریاست
    پٹیالہ۔ مراد آباد
    (۴۶) مولوی محمد احسن صاحب امروہا۔ ضلع مراد آباد۔
    (۴۷) میاں رشید احمد صاحب میڈیکل سٹوڈنٹ امروہا ضلع مراد آباد
    (۴۸) میر رشید حسین صاحب ؍؍ ؍؍
    (۴۹) شیخ زین الدین محمد ابراہیم صاحب
    چچ پوکلی کالی چوکے بمبئی انجینئر کلاتھ
    مینو فیکٹری
    (۵۰) میاں عبدالغفور ولد شمس الدین
    صاحب ؍؍ ؍؍
    (۵۱) پیر منظور محمد صاحب لودھیانہ
    (ڈپٹی انسپکٹر دفتر کونسل جموں و کشمیر)
    (۵۲) پیر افتخار احمد صاحب لدہیانہ محلہ نو
    (۵۳) پیر عنایت علی صاحب لودہیانہ محلہ نو
    (۵۴) بابو محمد بخش صاحب ملازم دفتر نہر
    انبالہ لودہیانہ محلہ نو
    (۵۵) میاں مولا بخش صاحب کلرک اگزیمنر
    آفس لاہور۔ لدہیانہ محلہ نو
    (۵۶) میاں کرم الٰہی صاحب کنسٹیبل ملازم
    پولیس لدھیانہ۔
    (۵۷) قاضی خواجہ علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۵۸) منشی عبدالحق صاحب خلیفہ عبدالسمیع
    صاحب ؍؍ ؍؍
    (۵۹) حافظ نور احمد صاحب اینڈ کولُنگی مرچنٹ
    لودیانہ۔
    (۶۰) میاں نظام الدین صاحب صحاف؍؍
    (۶۱) مولوی عبدالقادر صاحب جمال پور
    ضلع لدھیانہ۔ (مدرس)
    (۶۲) شاہزادہ عبدالمجید صاحب لودہیانہ
    (۶۳) میاں کریم بخش صاحب جمالپور ؍؍
    (۶۴) حاجی عبدالرحمن صاحب ؍؍
    (۶۵) میاں عبدالقادر صاحب جیگن ضلع لدھیانہ مدرس مدرسہؔ جمال پور
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 619
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 619
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/619/mode/1up
    (۶۶) میاں شہاب الدین صاحب لدھیانہ
    (۶۷) سید عبدالہادی صاحب ماچھی پورہ
    ضلع لدھیانہ
    (۶۸) میاں عبدالرحیم صاحب لودہیانہ
    محلہ موچ پورہ
    (۶۹) میاں اللہ بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۷۰) میاں عصمت اللہ صاحب مستری
    لودہیانہ بازار خرادیاں۔
    (۷۱) میاں رحمت اللہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۷۲) میاں شہاب الدین صاحب ؍؍ ؍؍
    (۷۳) میاں نظام الدین صاحب؍؍ ؍؍
    (۷۴) حکیم مولوی نظام الدین صاحب رنگ پور ضلع مظفر گڑھ حال وارد بھیرہ۔
    (۷۵) میاں عبدالحکیم خان صاحب سامانہ ریاست پٹیالہ۔ (میڈیکل سٹوڈنٹ لاہور)
    (۷۶) منشی غلام قادر صاحب سنور
    ریاست پٹیالہ پٹواری سرہند تحصیل
    (۷۷) منشی محمد ابراہیم صاحب؍؍ ؍؍
    (۷۸) قاضی زین العابدین صاحب خانپور۔ریاست پٹیالہ
    (۷۹) منشی عبداللہ صاحب سنوری پٹواری غوث گڑھ ریاست پٹیالہ تحصیل سرہند۔
    (۸۰) منشی ہاشم علی صاحب سنور ریاست پٹیالہ (پٹواری) تحصیل برنالہ۔
    (۸۱) مولوی عبدالصمد صاحب عرف شیخ علی محمد سنور ۔ ریاست پٹیالہ۔
    (۸۲) میاں عبدالرحمن صاحب سنور
    ریاست پٹیالہ پٹواری تحصیل سنام۔
    (۸۳) منشی محمد ابراہیم صاحب مدرس سنور
    ریاست پٹیالہ۔
    (۸۴) مولوی محمد یوسف صاحب سنور
    ریاست پٹیالہ (مدرس)
    (۸۵) میاں پیر بخش صاحب کہیرو
    ریاست پٹیالہ (زمیندار)
    (۸۶) میاں امیر بخش صاحب کہیرو ؍؍
    (۸۷) میاں اللہ بخش صاحب حجام؍؍ ؍؍
    (۸۸) شیخ جلال الدین صاحب ریاست پٹیالہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 620
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 620
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/620/mode/1up
    (۸۹ؔ ) میاں علی نواز صاحب موضع چمارو
    ریاست پٹیالہ۔
    (۹۰) میاں عبدالکریم صاحب نمبردار ؍؍ ؍؍
    (۹۱) میاں محمد اسماعیل صاحب ؍؍ ؍؍
    (۹۲) محمد اکبر خان صاحب سنور ؍؍ ؍؍
    (۹۳) میاں نور محمد صاحب زمیندار
    غوث گڑھ ریاست پٹیالہ۔
    (۹۴) میاں ماہیا صاحب زمیندارغوث گڑھ
    ریاست پٹیالہ۔
    (۹۵) میاں بیگا صاحب کہریس پورہ
    ضلع انبالہ۔
    (۹۶) میاں عطا الٰہی صاحب غوث گڑھ
    ریاست پٹیالہ۔
    (۹۷) میاں ہمیرا صاحب جسووال ؍؍
    (۹۸) منشی محمدی صاحب غوث گڑھ ؍؍
    (۹۹) میاں غلام قادر صاحب پٹیالہ
    محلہ پوریاں۔ (زمیندار)
    (۱۰۰) میاں عبدالمجید خان صاحب سانبہر
    ملک راجپوتانہ (طالب علم)
    (۱۰۱) حاجی محمد بن احمدّ مکی (مکہ معظمہ)۔
    (۱۰۲) مرزا خدا بخش صاحب جھنگ (اتالیق
    نواب محمد علی خان صاحب بہادر مالیر کوٹلہ)
    (۱۰۳) حافظ نجم الدین صاحب بھٹیاں
    ضلع گوجرانوالہ
    (۱۰۴) قاضی ضیاء الدین صاحب کوٹ قاضی
    ضلع گوجرانوالہ۔ ڈاک خانہ بوتالہ۔
    (۱۰۵) منشی محمد دین صاحب پٹواری
    ضلع گوجرانوالہ۔
    (۱۰۶) منشی احمد دین صاحب گوجرانوالہ۔
    (۱۰۷) سید غلام شاہ صاحب نورنگ ؍؍
    (۱۰۸) میاں کرم داد صاحب تہنگ
    ضلع گجرات۔
    (۱۰۹) مولوی جلال الدین صاحب۔ بلانی
    ضلع گجرات۔
    (۱۱۰) میاں صاحب دین صاحب۔ تہال
    ضلع گجرات۔
    (۱۱۱) مولوی فضل الدین صاحب کھاریاں
    ضلع گجرات ۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 621
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 621
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/621/mode/1up
    (۱۱۲) میاں محمد علی صاحب جلالپور
    ضلع گجرات ۔ کلرک اگزیمنر آفس لاہور۔
    (۱۱۳) مولوی سید جمال شاہ صاحب واعظ
    نندووال ضلع گجرات۔
    (۱۱۴) حافظ فضل احمد صاحب گجرات۔
    کلرک دفتر اگزیمنر آفس لاہور۔
    (۱۱۵) شیخ رحمت اللہ صاحب میونسپل کمشنر
    گجرات۔
    (۱۱۶) حافظ محمد صاحب پشاور کوٹلہ
    فیل باناں۔
    (۱۱۷) میاں عبداللہ صاحب ایضاً ؍؍
    (۱۱۸) مولوی غلام حسین صاحب مدرس بورڈ سکول ؍؍
    (۱۱۹) حافظ حامد علی صاحب قادیان
    ضلع گورداسپور
    (۱۲۰) حافظ معین الدین صاحب ؍؍
    (۱۲۱) مرزا اسماعیل بیگ صاحب ؍؍
    (۱۲۲) میاں جان محمد صاحب امام مسجد ؍؍
    (۱۲۳) شیخ نور احمد صاحب زمیندار کھارا
    ضلع گورداسپورہ۔
    (۱۲۴) شیخ عبدالرحمن صاحب ُ بٹر کلاں
    ضلع گورداسپورہ( نومسلم)
    (۱۲۵) حافظ امام الدین صاحب ننگل۔
    ضلع گورداسپورہ۔
    (۱۲۶) میاں محمد بخش صاحب ککے زئی بٹالہ۔ضلع گورداسپورہ۔
    (۱۲۷) حاجی غلام محمد صاحب بٹالہ ؍؍
    (۱۲۸) شیخ مراد علی صاحب کلانور۔
    ضلع گورداسپورہ۔
    (۱۲۹) میاں ہاشم علی صاحب جنڈما جہہ
    (۱۳۰) میاں نتھو صاحب زمیندار
    بازید چک ؍؍
    (۱۳۱) میاں مہر دین زمیندار ؍؍ ؍؍
    (۱۳۲) مولوی الٰہی بخش صاحب
    ساکن لیل ؍؍
    (۱۳۳) میاں عبداللہ صاحب سوہلا ؍؍
    (۱۳۴) میاں علی بخش صاحب درزی ؍؍ ؍؍
    (۱۳۵) منشی ہاشم علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۳۶) فقیر مردان شاہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۳۷) میاں چراغ علی صاحب تھہ
    غلام نبی۔ضلع گورداسپورہ (زمیندار)
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 622
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 622
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/622/mode/1up
    (1۳۸ ) میاں نظام الدین صاحب
    تھہ غلام نبی ضلع گورداسپورہ
    (۱۳۹) میاں محمد بخش صاحب زمیندار
    تھہ غلام نبی ضلع گورداسپورہ
    (۱۴۰) میاں شہاب الدین صاحب زمیندار تھہ غلام نبی ضلع گورداسپورہ
    (۱۴۱) میاں سلطان بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۴۲) میاں خدا بخش صاحب نو مسلم ؍؍ ؍؍
    (۱۴۳) میاں مہر علی صاحب بیبل چک ؍؍ ؍؍
    (۱۴۴) حکیم محمد اشرف صاحب بٹالہ ؍؍
    (۱۴۵) میاں محمد اکبر صاحب ٹھیکہ دار لکڑی
    بٹالہ ضلع گورداسپورہ
    (۱۴۶) شیخ نور احمد صاحب رئیس ؍؍ ؍؍
    (۱۴۷) میاں فضل حق صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۴۸) منشی دین محمد صاحب ؍؍ ؍؍
    محالدار ریاست جموں
    (۱۴۹) میاں محمد ابراہیم صاحب ؍؍ ؍؍
    میڈیکل سٹوڈنٹ لاہور
    (۱۵۰) میاں نور ماہی صاحب بٹالہ ؍؍
    (۱۵۱) حافظ عمر الدین صاحب تھہ غلام نبی ضلع گورداسپورہ
    (۱۵۲) میاں نتھو صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۵۳) میاں رحمت علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۵۴) منشی غلام قادر صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۵۵) میاں عبداللہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۵۶) میاں فقیر علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۵۷) میاں شیر علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۵۸) چوہدری سلطان بخش صاحب زمیندار ؍؍ ؍؍
    (۱۵۹) چوہدری محمدا صاحب گرایانوالہ ضلع گورداسپورہ
    (۱۶۰) چوہدری سلطانا صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۶۱) مہر عبداللہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۶۲) میاں محکم دین صاحب دوکاندار سری گوبند پورہ ؍؍
    (۱۶۳) میاں شاہ محمد صاحب پٹولی بٹالہ؍؍
    (۱۶۴) سید مہر شاہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۶۵) سید فقیر حسین صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۶۶) سید حسین شاہ صاحب کٹھالہ ؍؍
    (۱۶۷) سید عمر شاہ صاحب نواں پنڈ ؍؍
    (۱۶۸) مہر نبی بخش صاحب نمبردار ممبر کمیٹی و
    میونسپل کمشنر بٹالہ ضلع گورداسپورہ۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 623
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 623
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/623/mode/1up
    (۱۶۹ؔ ) شیخ فتح محمد صاحب بٹالہ
    ضلع گورداسپورہ
    (۱۷۰) منشی محکم الدین صاحب اشٹام فروش سری گوبند پورہ ضلع گورداسپورہ
    (۱۷۱) منشی محمد علی صاحب پنشنر ضلعدار
    بٹالہ ضلع گورداسپورہ
    (۱۷۲) حاجی غلام محمد صاحب ڈپٹی انسپکٹر ؍؍ ؍؍
    (۱۷۳) بابو علی محمد صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۷۴) منشی محمد عمر صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۷۵) شیخ جان محمد صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۷۶) میاں نور محمد صاحب فیض اللہ چک؍؍
    (۱۷۷) میاں عمر شاہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۷۸) میاں اللہ بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۷۹) میاں غلام علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۸۰) میاں کرم الٰہی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۸۱) میاں علی بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۸۲) میاں مولا داد صاحب تھہ غلام نبی ؍؍
    (۱۸۳) چوہدری حامدعلی صاحب نمبردار
    وزیر چک ؍؍
    (۱۸۴) چوہدری گھسیٹاصاحب بیبل چک ؍؍
    (۱۸۵) میاں اللہ دتا صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۸۶) میاں ولی محمد صاحب بیبل چک۔ ضلع گورداسپورہ۔
    (۱۸۷) میاں غلام فرید صاحب بیبل چک ؍؍
    (۱۸۸) میاں عنایت اللہ صاحب بٹالہ؍؍
    (۱۸۹) مولوی قدرت اللہ صاحب؍؍ ؍؍
    (۱۹۰) میاں مظفر اللہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۹۱) میاں قادر بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۹۲) میاں محمد دین صاحب قادیان؍؍
    (۱۹۳) میاں حاکم علی صاحب
    تھہ غلام نبی ؍؍
    (۱۹۴) منشی زین العابدین صاحب؍؍
    (۱۹۵) منشی محمد جان صاحب پٹواری جہلمی؍؍
    (۱۹۶) میاں جمال الدین صاحب
    پشمینہ باف سیکھواں ؍؍
    (۱۹۷) میاں امام الدین صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۹۸) میاں خیر الدین صاحب ؍؍ ؍؍
    (۱۹۹) میاں محمد صدیق صاحب ؍؍ ؍؍
    (۲۰۰) میاں عبداللہ صاحب ٹہیراں؍؍
    (۲۰۱) میاں قطب الدین صاحب دفروالہ ؍؍
    (۲۰۲) چوہدری دینا صاحب قادر آباد؍؍
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 624
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 624
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/624/mode/1up
    (۲۰۳ؔ ) میاں شیر علی صاحب قادیان۔
    ضلع گورداسپورہ
    (۲۰۴) میاں الٰہیا چوکیدار سیکھواں
    ضلع گورداسپورہ
    (۲۰۵) میاں گوہر شا صاحب بہوی
    ضلع گورداسپورہ۔
    (۲۰۶) چوہدری نواب صاحب زمیندار
    ملولپور ضلع گورداسپورہ۔
    (۲۰۷) میاں نور الدین صاحب اجوئی
    ضلع گورداسپورہ۔
    (۲۰۸) میاں کالو شاہ صاحب عالم پور
    ضلع گورداسپورہ۔
    (۲۰۹) میاں نور احمد صاحب زمیندار
    کلوی ضلع گورداسپورہ۔
    (۲۱۰) چوہدری امام الدین صاحب
    کلوی ضلع گورداسپورہ
    (۲۱۱) چوہدری نظام الدین صاحب کلوی
    ضلع گورداسپورہ
    (۲۱۲) فقیر مہر شاہ صاحب کولیان ؍؍
    (۲۱۳) مولوی حافظ عظیم بخش صاحب
    بہومگہ ضلع گورداسپورہ حال پٹیالہ۔
    (۲۱۴) مولوی غلام جیلانی صاحب نوہون
    ضلع انبالہ مدرس مدرسہ گہرونون۔
    (۲۱۵) مولوی عبداللہ صاحب مدرس
    ہندو محمڈن سکول۔ بٹالہ
    (۲۱۶) بابو اللہ بخش صاحب چھاؤنی انبالہ
    ریلوے ٹرین کلرک۔
    (۲۱۷) منشی محمد مظاہر الحق خلف مولوی
    محمد ظہور علی صاحب۔ اٹاوہ
    محلہ قاضی ٹولہ
    (۲۱۸) حکیم مولوی محمد اسحاق صاحب
    گوہلہ ضلع کرنال۔
    (۲۱۹) میر محمد سعید صاحب دہلی کہڑکی
    فراش خانہ۔ دہلی۔
    (۲۲۰) منشی عبدالعزیز صاحب۔ دہلی
    قاسم جان کی گلی۔ ملازم دفتر نہر
    انبالہ۔
    (۲۲۱) میر محمد کبیر صاحب دہلی کہڑکی
    فراش خانہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 625
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 625
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/625/mode/1up
    (۲۲ؔ ۲) میر ناصر نواب صاحب دہلی۔ کہڑکی
    فراش خانہ۔ نقشہ نویس دفتر نہر پٹیالہ۔
    (۲۲۳) مولوی محمد حسین صاحب زمیندار
    بھاگورائیں ریاست کپورتھلہ ضلع جالندھر۔
    (۲۲۴) منشی اروڑا صاحب کپورتھلہ ؍؍
    (۲۲۵) منشی محمد خان صاحب ؍؍ ؍؍
    (۲۲۶) منشی ظفر احمد صاحب ؍؍ ؍؍
    (۲۲۷) منشی حبیب الرحمن صاحب رئیس
    حاجی پور۔ ریاست کپورتھلہ
    (۲۲۸) میاں جی روشن دین صاحب
    ریاست کپورتھلہ
    (۲۲۹) حافظ محمد علی صاحب ایضاً
    (۲۳۰) میاں عبدالمجید خان صاحب ولد
    محمد خان ریاست کپورتھلہ۔
    (۲۳۱) حکیم فتح محمد صاحب ایضاً
    (۲۳۲) حافظ بابا صاحب نابینا ؍؍
    (۲۳۳) منشی فیاض علی صاحب ؍؍
    (۲۳۴) منشی عبدالرحمن صاحب کپورتھلہ۔
    (۲۳۵) میاں نظام الدین صاحب ؍؍
    (۲۳۶) میاں عبداللہ صاحب۔ ؍؍
    (۲۳۷) منشی حسن خان صاحب ملازم توپخانہ کپورتھلہ
    (۲۳۸) چوہدری جھنڈو صاحب ؍؍
    (۲۳۹) میاں کریم بخش صاحب ملازم پلٹن کپورتھلہ
    (۲۴۰) منشی امداد اللہ خان صاحب
    اہلمدسررشتہ تعلیم کپورتھلہ۔
    (۲۴۱) مستری جان محمد صاحب کپورتھلہ
    (۲۴۲) منشی محمد دین صاحب لاہور
    کلرک ڈسٹرکٹ ٹریفک۔
    (۲۴۳) منشی محمد حسین صاحب لاہور۔
    کلرک اگزیمنر آفس لاہور۔
    (۲۴۴) منشی مظفر الدین صاحب ؍؍
    (۲۴۵) میاں عنایت اللہ صاحب طالب علم
    لاہور۔
    (۲۴۶) منشی محمد بخش صاحب لاہور
    موچی دروازہ کلرک اگزیمنر آفس لاہور۔
    (۲۴۷) خلیفہ رشید الدین صاحب لاہور (میڈیکل سٹوڈنٹؔ )
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 626
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 626
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/626/mode/1up
    (۲۴۸) میاں نور الدین صاحب لاہور۔
    (۲۴۹) مولوی کرم الٰہی صاحب لاہور
    تکیہ سادھواں۔
    (۲۵۰) حکیم محمد حسین صاحب لاہور
    لنگے منڈی
    (۲۵۱) میاں عبدالعزیز صاحب لاہور
    لنگے منڈی
    (۲۵۲) میاں رحیم اللہ صاحب لاہور
    لنگے منڈی۔
    (۲۵۳) منشی عبدالعزیز صاحب باغبانپورہ
    ضلع لاہور (سابق فارسٹر)
    (۲۵۴) منشی امام الدین کاتب امرتسر
    کڑہ کرم سنگھ۔
    (۲۵۵) منشی تاج الدین صاحب لاہور
    اکونٹنٹ ریلوے آفس۔
    (۲۵۶) ماسٹر احمد صاحب لاہور
    (۲۵۷) حاجی شہاب الدین صاحب ؍؍
    (۲۵۸) منشی عزیز الدین صاحب ؍؍
    (۲۵۹) خلیفہ رجب الدین صاحب لاہور
    (۲۶۰) میاں عزیز الدین صاحب پٹی
    ضلع لاہور (مدرس بگہبانہ)
    (۲۶۱) میاں عبداللطیف صاحب باغبانپورہ ضلع لاہور۔
    (۲۶۲) حاجی منشی شمس الدین صاحب لاہور کلرک اگزیمنر آفس لاہور
    (۲۶۳) میاں نبی بخش صاحب راولپنڈی
    محلہ قطب الدین کلرک اگزیمنر آفس
    لاہور۔
    (۲۶۴) میاں پیر بخش صاحب خوجہ مکھڈ
    ضلع راولپنڈی۔
    (۲۶۵) چوہدری محمد سعید صاحب۔مکھڈ
    ضلع راولپنڈی۔
    (۲۶۶) منشی محمد مقبول صاحب میر منشی
    پلٹن نمبر ۳۰ راولپنڈی۔
    (۲۶۷) صاحبزادہ سراج الحق جمالی نعمانی صاحب۔ سرساوہ ضلع سہارنپور
    (۲۶۸) حافظ غلام رسول صاحب سوداگر
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 627
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 627
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/627/mode/1up
    وزیرؔ آباد۔ ضلع گوجرانوالہ
    (۲۶۹) میاں محمد جان صاحب ملازم راجہ امر سنگھ وزیر آباد۔ ضلع گوجرانوالہ۔
    (۲۷۰) شیخ نبی بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۲۷۱) خلیفہ نور الدین صاحب۔ جموں
    (۲۷۲) میاں اللہ دتا صاحب ؍؍
    (۲۷۳) سید محمد شاہ صاحب ؍؍
    (۲۷۴)مولوی تاج محمد صاحب سر باندی؍؍
    (۲۷۵) منشی عبدالرحیم صاحب سب اوورسیر
    سری نگر (جموں)
    (۲۷۶) منشی عبدالرحیم صاحب اوورسیر
    کشمیر (جموں)
    (۲۷۷) مستری عمر صاحب (جموں)
    (۲۷۸) منشی نواب خان صاحب (جموں)
    (۲۷۹) منشی محمد شریف صاحب نگیال
    (ریاست جموں)
    (۲۸۰) مولوی انوار حسین خان صاحب
    شاہ آباد ضلع ہر دوئی۔
    (۲۸۱) شیخ نور احمد صاحب مہتمم ریاض ہند
    امرتسر۔
    (۲۸۲) میاں ظہور احمد ولد میاں نور احمد
    امرتسر
    (۲۸۳) شیخ عبدالقیوم صاحب قانون گو
    امرتسر
    (۲۸۴) مولوی کریم الدین صاحب نو مسلم
    امرتسر (کٹرہ آہلو والیہ)
    (۲۸۵) مولوی عنایت اللہ صاحب حکیم
    امرتسر (کٹرہ آہلو والیہ)
    (۲۸۶) منشی عبدالرحمن صاحب امرتسر
    (کٹرہ کرم سنگھ)
    (۲۸۷) چوہدری محمدی صاحب۔ امرتسر
    (کٹرہ آہلو والیہ)
    (۲۸۸) میاں غلام قادر صاحب علاقہ بند
    امرت سر
    (۲۸۹) میاں امام الدین صاحب ؍؍
    گرو بازار
    (۲۹۰) بابو محکم الدین صاحب مختار عدالت
    (امرت سر)
    (۲۹۱) مستری قطب الدین خان صاحب ؍؍
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 628
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 628
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/628/mode/1up
    ڈیوڑؔ ھی کرموں۔
    (۲۹۲) مولوی عبداللطیف صاحب مدرسہ
    محمدی (امرتسر) کٹرہ موتی رام
    (۲۹۳) میاں محمد ابراہیم صاحب ؍؍ ؍؍
    (۲۹۴) چوہدری شاہ محمد صاحب زمیندار
    (رام دیوالی (ضلع امرت سر)
    (۲۹۵) میاں دین محمد صاحب بہوی وال
    ضلع امرت سر
    (۲۹۶) میاں فتح الدین صاحب رام دیوالی
    (ضلع امرتسر)
    (۲۹۷) سید سکندر شاہ صاحب امام مسجد
    رام دیوالی۔ ضلع امرت سر
    (۲۹۸) میاں بوٹا صاحب اولی والہ ؍؍
    (۲۹۹) شیخ عبداللہ صاحب طالبعلم۔ علی گڑھ
    (۳۰۰) شیخ حامد علی خان صاحب میڈیکل سٹوڈنٹ علی گڑھ
    (۳۰۱) جناب خان صاحب محمد علی خان صاحب رئیس مالیر کوٹلہ۔
    (۳۰۲) شیخ ولی محمد صاحب شاہ آباد اہلکار خان صاحب موصوف۔ ؍؍
    (۳۰۳) شیخ فضل محمد صاحب؍؍ ملازم خان صاحب محمد ذوالفقار علی صاحب و محمد یوسف علی خان صاحب۔
    (۳۰۴) سید شیر شاہ صاحب ملازم خان صاحب
    مالیر کوٹلہ
    (۳۰۵) میاں صفدر علی صاحب ؍؍ ؍؍
    (۳۰۶) میاں عبدالعزیز صاحب؍؍ ؍؍
    (۳۰۷) میاں جیوا صاحب ؍؍ ؍؍
    (۳۰۸) میاں قادر بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    (۳۰۹) میاں برکت شاہ صاحب ؍؍ ؍؍
    (۳۱۰) میاں کمے خان صاحب ؍؍ ؍؍
    (۳۱۱) میاں فتح محمد صاحب ؍؍ ؍؍
    (۳۱۲) میاں عبدالکریم صاحب حجام ؍؍ ؍؍
    (۳۱۳)میاں عبدالجلیل خان صاحب شاہجہاں آباد ؍؍
    (۳۱۴) میاں حامد علی صاحب۔ بریلی۔
    (۳۱۵) منشی علی گوہر خان صاحب۔ جالندھر
    (۳۱۶) منشی رستم علی خان صاحب مداران۔ ضلع جالندھر۔ ڈپٹی انسپکٹر پولیس ریلوے
    (۳۱۷) مولوی احمد جان صاحب جالندھر شہر مدرس ضلع گوجرانوالہ۔
    (۳۱۸) میاں وزیرا صاحب ٹھیکہ دار کہیرو
    ریاست نابھہ۔
    (۳۱۹) مولوی شیخ احمد صاحب واعظ سرہند
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 629
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 629
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/629/mode/1up
    ریاؔ ست پٹیالہ وارد بٹالہ۔
    (۳۲۰) میاں محمد صاحب ولد عبداللہ صاحب
    شیرپور ضلع فیروزپور حال وارد بھیرہ۔
    (۳۲۱) سیّد معراج الدین صاحب بٹالہ۔
    (۳۲۲) میاں جان محمد صاحب طالب علم بٹالہ۔
    (۳۲۳) مولوی وزیر الدین صاحب مکیریاں
    ضلع ہوشیارپور
    (۳۲۴) چوہدری کریم بخش صاحب مکیریاں۔ضلع ہوشیارپور۔
    (۳۲۵) غلام حسین صاحب مکیریاں ضلع ہوشیارپور۔
    (۳۲۶) میاں میراں بخش صاحب مکیریاں
    ضلع ہوشیارپور۔
    (۳۲۷) میاں غلام رسول صاحب مکیریاں
    ضلع ہوشیارپور
    ناظرین کی توجہ کے لایق
    اس بات کے سمجھنے کے لئے کہ انسان اپنے منصوبوں سے خدا تعالیٰ کے کاموں کو روک نہیں سکتا۔ یہ نظیر نہایت تشفی بخش ہے کہ سال گزشتہ میں جب ابھی فتویٰ تکفیر میاں بٹالوی صاحب کا طیار نہیں ہوا تھا اور نہ انہوں نے کچھ بڑی جدوجہد اور جان کنی کے ساتھ اس عاجز کے کافر ٹھہرانے کے لئے توجہ فرمائی تھی صرف ۷۵ احباب اور مخلصین تاریخ جلسہ پر قادیان میں تشریف لائے تھے۔ مگر اب جبکہ فتویٰ طیار ہوگیا اور بٹالوی صاحب نے ناخنوں تک زور لگا کر اور آپ بصد مشقت ہر یک جگہ پہنچ کر اور سفر کی ہر روزہ مصیبتوں سے کوفتہ ہو کر اپنے ہم خیال علماء سے اس فتویٰ پر مہریں ثبت کرائیں اور وہ اور ان کے ہم مشرب علماء بڑے ناز اور خوشی سے اس بات کے مدعی ہوئے کہ گویا اب انہوں نے اس الٰہی سلسلہ کی ترقی میں بڑی بڑی روکیں ڈال دی ہیں تو اس سالانہ جلسہ میں بجائے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 630
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 630
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/630/mode/1up
    ۷۵ؔ کے تین سو ستائیس احباب شامل جلسہ ہوئے اور ایسے صاحب بھی تشریف لائے جنہوں نے توبہ کر کے بیعت کی۔ اب سوچنا چاہیئے کہ کیا یہ خدا تعالیٰ کی عظیم الشان قدرتوں کا ایک نشان نہیں کہ بٹالوی صاحب اور ان کے ہم خیال علماء کی کوششوں کا الٹا نتیجہ نکلا اور وہ سب کوششیں برباد ہوگئیں۔ کیا یہ خدا تعالیٰ کا فعل نہیں کہ میاں بٹالوی کے پنجاب اور ہندوستان میں پھرتے پھرتے پاؤں بھی گھس گئے لیکن انجام کار خدا تعالیٰ نے ان کو دکھلا دیا کہ کیسے اس کے ارادے انسان کے ارادوں پر غالب ہیں۔ 33۔۱؂ اس سال میں خدا تعالیٰ نے دو نشان ظاہر کئے۔ ایک بٹالوی کا اپنی کوششوں میں نامراد رہنا۔ دوسرے اس پیشگوئی کے پورے ہونے کا نشان جو نور افشاں۔ ۱۰ مئی ۱۸۸۸ ؁ء میں چھپ کر شائع ہوئی تھی۔ اب بھی بہتر ہے کہ بٹالوی صاحب اور ان کے ہم مشرب باز آجائیں اور خدا تعالیٰ سے لڑائی نہ کریں۔
    والسّلام علٰی من اتبع الھدٰی۔
    مطبوعہ ریاض ہند پریس قادیان
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 631
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 631
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/631/mode/1up
    اِشتہاؔ ر ضروری
    بخدمت شریف تمام مخلصان و بہی خواہان اسلام بعد سلام مسنون واضح ہو کہ بموقع جلسہ سالانہ جو بمقام قادیان ۲۷۔۲۸۔۲۹ تاریخ ماہ دسمبر ۱۸۹۲ ؁ء کو منعقد ہوا۔ اس میں چند معزز مخلصان کی تحریک پر قرار پایا کہ چونکہ مطبع کی ہمیشہ شکایت رہتی ہے۔ اس لئے ایک مستقل انتظام دربارہ مطبع کیا جانا ضروری ہے جس میں علاوہ کتب تائید اسلام مہینے میں دو دفعہ ایک پرچہ اخبار بھی شائع ہوا کرے گا جس میں تفسیر بعض بعض آیات قرآن شریف و جواب مخالفین اسلام وغیرہ درج ہوا کریں گے۔ چنانچہ اصحاب حاضرین نے نہایت اخلاص و صدق سے اس تجویز کو پسند کیا اور حسب مرضی کل صاحبان تخمینہ لگایا گیا۔ رقم تخمینہ تقریبًا 3ماہوار قرار پائی۔ اس پر ہر یک مخلص نے اپنے مقدور کے موافق بطِیب خاطر چندہ لکھوایا جس کی فہرست ذیل میں درج ہے۔ اس تجویز سے پہلے بہت سے معزز اصحاب واپس تشریف لے جا چکے تھے وہ اس کار خیر میں شامل نہیں ہو سکے۔ امید کہ صادقاں باوفا و مخلصان بے ریا ضرور اس نیک کام میں شمولیت فرما کر سعادت دارین کے مستحق ہوں گے اور بہت جلد اپنی رقم چندہ سے اطلاع بخشیں گے۔ لیکن حضرت اقدس فرماتے ہیں کہ کوئی صاحب مجبورًا چندہ نہ لکھوائیں بلکہ اپنی خوشی سے حسب استطاعت لکھوائیں۔
    المشتھر مرزا *خدا بخش اتالیق نواب محمد علی خان صاحب رئیس مالیر کوٹلہ ضلع لودہیانہ سیکرٹری
    * نوٹ: سب صاحبان کو واضح رہے کہ اس بارہ میں تمام خط و کتابت بنام احقر ہونی چاہیئے۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 632
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 632
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/632/mode/1up
    فہرست چندہ دہندگان و رقوم چندہ جو بموقع جلسہ
    ۲۹ دسمبر ۱۸۹۲ء ؁ بمقام قادیان لکھا گیا
    نمبرشمار
    نام
    ماھوار
    سالانہ
    وصول
    (۱)
    جناب حکیم محمد احسن صاحب
    (۲)
    جناب خلیفہ نور الدین صاحب
    (۳)
    جناب پیر سراج الحق صاحب
    (۴)
    منشی ہاشم علی صاحب پٹواری سنور
    (۵)
    جناب میر ناصر نواب صاحب
    (۶)
    جناب شیخ رحمت اللہ صاحب گجراتی
    (۷)
    میاں عبدالرحمن صاحب سنوری
    (۸)
    منشی ابراہیم صاحب سنوری مدرس
    (۹)
    سید محمد شاہ صاحب ٹھیکہ دار جموں
    (۱۰)
    سید حامد شاہ صاحب سیالکوٹی
    (۱۱)
    حافظ محمد صاحب پشاوری
    (۱۲)
    سید عبدالہادی صاحب اوورسیر ماچھی واڑہ
    (۱۳)
    ڈاکٹر عبدالحکیم خان صاحب میڈیکل کالج لاہور
    (۱۴)
    مولوی نظام الدین صاحب رنگپوری
    (۱۵)
    میاں شادی خان صاحب ملازم راجہ امر سنگھ صاحب بہادر
    (۱۶)
    مرزا خدا بخش مالیر کوٹلہ
    (۱۷)
    مولوی غلام حسن صاحب پشاوری
    (۱۸)
    سید خصیلت علی شاہ صاحب ڈپٹی انسپکٹر پولیس
    (۱۹)
    قاضی ضیاء الدین صاحب قاضی کوٹی
    (۲۰)
    مولوی قطب الدین صاحب بدوملہوی
    (۲۱)
    سید امیر علی شاہ صاحب سارجنٹ پولیس
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 633
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 633
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/633/mode/1up
    (۲۲ؔ )
    مولوی محمد یوسف صاحب سنوری
    (۲۳)
    شیخ عبدالصمد صاحب سنوری
    (۲۴)
    منشی احمد بخش صاحب سنوری پٹواری تحصیل بانگر
    (۲۵ )
    حافظ عظیم بخش صاحب علاقہ پٹیالہ
    (۲۶)
    میاں عبدالکریم صاحب علاقہ پٹیالہ
    (۲۷)
    سرفراز خان صاحب نمبردار بدوملہی
    (۲۸)
    میاں اللہ دتا صاحب سیالکوٹی
    (۲۹)
    شاہزادہ عبدالمجید صاحب لدھیانوی
    (۳۰)
    حافظ نور احمد صاحب سوداگر لدھیانوی
    (۳۱)
    شیخ عبدالحق صاحب لدھیانوی
    (۳۲)
    منشی نبی بخش صاحب کلرک اگزیمنر آفس لاہور
    (۳۳)
    منشی تاج الدین صاحب اکونٹنٹ اگزیمنر آفس لاہور
    (۳۴)
    حافظ فضل احمد صاحب کلرک اگزیمنر آفس لاہور
    (۳۵)
    مولوی مفتی غلام جیلانی صاحب مدرس کہر ونوہ
    (۳۶)
    مولوی عبدالقادر صاحب مدرس جمالپور ضلع لدھیانہ
    (۳۷)
    مولوی قدرت اللہ صاحب بٹالوی
    (۳۸)
    بابو غلام محمد صاحب سیالکوٹی
    (۳۹)
    مہر عبدالعزیز صاحب عرف مہر نبی بخش صاحب بٹالوی
    (۴۰)
    منشی نظام الدین صاحب خوجہ جہلمی
    (۴۱)
    منشی عبدالمجید صاحب طالب علم وٹرنری سکول لاہور
    (۴۲)
    شیخ چراغ الدین صاحب ساکن تھہ غلام نبی ضلع گورداسپور
    (۴۳)
    منشی کرم الٰہی کنسٹیبل پولیس لدھیانہ
    (۴۴)
    منشی کرم الٰہی صاحب مدرس مدرسہ نصرت الاسلام لاہور
    (۴۵)
    میاں عمرا ساکن جمال پور ضلع لدھیانہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 634
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 634
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/634/mode/1up
    (۴۶ؔ )
    میاں خیرا نمبردار جمال پور ضلع لدھیانہ
    (۴۷)
    مولوی مبارک علی صاحب سیالکوٹی
    (۴۸)
    منشی فیاض علی صاحب کپورتھلوی
    (۴۹)
    منشی حبیب الرحمن صاحب
    (۵۰)
    منشی محمد اروڑا صاحب
    (۵۱)
    منشی علی گوہر صاحب جالندھری
    (۵۲)
    منشی عبدالرحمن صاحب کپورتھلوی
    (۵۳)
    مولوی محمد حسین صاحب کپورتھلوی
    (۵۴)
    حکیم فتح محمد صاحب کپورتھلوی
    (۵۵)
    میاں روشن دین صاحب کپورتھلوی
    (۵۶)
    منشی ظفر احمد صاحب کپورتھلوی
    (۵۷)
    منشی محمد خان صاحب کپورتھلوی
    (۵۸)
    مرزا صفدر علی خدمتگار نواب محمد علی خان صاحب مالیر کوٹلہ
    (۵۹)
    مرزا اسماعیل بیگ صاحب قادیان ضلع گورداسپورہ
    (۶۰)
    حافظ محمد علی صاحب کپورتھلوی
    (۶۱)
    منشی اللہ بخش صاحب سیالکوٹی
    (۶۲)
    منشی عبدالعزیز صاحب ملازم دفتر نہر انبالہ ساکن دہلی قاسم جان کی گلی
    (۶۳)
    منشی ابراہیم صاحب پٹواری سنور
    (۶۴)
    منشی غلام قادر صاحب پٹواری گہنواں تحصیل سرہند
    (۶۵)
    میاں جمال دین صاحب ساکن سیکھواں
    (۶۶)
    مستری عمر بخش صاحب ساکن جلالپور جٹاں وارد جموں
    (۶۷)
    منشی گلاب دین صاحب مدرس مدرسہ زنانہ رہتاس ضلع جہلم
    (۶۸)
    میاں فضل کریم صاحب عطار ساکن سیالکوٹ
    (۶۹)
    شیخ امام الدین صاحب ساکن نوشہرہ ضلع سیالکوٹ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 635
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 635
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/635/mode/1up
    (۷۰ؔ )
    منشی غلام قادر صاحب فصیح سیالکوٹی
    (۷۱)
    میاں اللہ دتا صاحب ساکن رہتاس ضلع جہلم
    (۷۲)
    میاں نور احمد صاحب ساکن کھارا ضلع گورداسپورہ
    (۷۳)
    میاں محمد ٹپ گر ساکن امرتسر کٹرہ آہلو والیہ
    (۷۴)
    میاں غلام حسین صاحب ساکن رہتاس ضلع جہلم
    (۷۵)
    میاں عطا الٰہی صاحب زمیندار غوث گڑھ ریاست پٹیالہ
    (۷۶)
    بابو محکم الدین صاحب مختار امرتسر
    (۷۷)
    میاں ماہیا صاحب زمیندار غوث گڑھ ریاست پٹیالہ
    (۷۸)
    منشی عبداللہ صاحب پٹواری غوث گڈھ
    (۷۹)
    حکیم محمد اشرف صاحب خطیب بٹالہ
    (۸۰)
    مولوی تاج محمد صاحب علاقہ لودہیانہ
    (۸۱)
    میاں امیر الدین صاحب ساکن جسووال ضلع لودہیانہ
    (۸۲)
    میاں نور محمد صاحب زمیندار ساکن غوث گڑھ پٹیالہ
    (۸۳)
    میاں محمدی صاحب زمیندار غوث گڑھ ریاست پٹیالہ
    (۸۴)
    میاں شہزادہ صاحب زمیندار غوث گڑھ
    (۸۵)
    میاں کرم الٰہی صاحب ولد مادا ؍؍ ؍؍
    (۸۶)
    میاں شاہ محمد صاحب ساکن رام جوالی مسلمانان تھانہ کتھوننگل
    (۸۷)
    چوہدری محمد سلطان صاحب ممبر کمیٹی سیالکوٹ
    (۸۸)
    سیّد محمد سعید صاحب دہلی کہڑکی فراش خانہ
    (۸۹)
    میاں اسماعیل صاحب ساکن چمارو ریاست پٹیالہ
    (۹۰)
    حکیم محمد شاہ صاحب سیالکوٹی
    (۹۱)
    حافظ عبدالرحمن صاحب امرتسری حال وارد بٹالہ
    (۹۲)
    حکیم محمد امین صاحب بٹالوی
    (۹۳)
    شیخ نور احمد صاحب مالک مطبع ریاض ہند
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 636
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 636
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/636/mode/1up
    قابلؔ توجہ احباب
    اگرچہ مکرر یاد دہانی کی کچھ ضرورت نہیں تھی لیکن چونکہ دل میں انجام خدمت دینی کے لئے سخت اضطراب ہے اس وجہ سے پھر یہ چند سطریں بطور تاکید لکھتا ہوں۔
    اے جماعت مخلصین خدا تعالیٰ آپ کے ساتھ ہو اس وقت ہمیں تمام قوموں کے ساتھ مقابلہ درپیش ہے اور ہم خدا تعالیٰ سے امید رکھتے ہیں کہ اگر ہم ہمت نہ ہاریں اور اپنے سارے دل اور سارے زور اور ساری توجہ سے خدمت اسلام میں مشغول ہوں تو فتح ہماری ہوگی۔ سو جہاں تک ممکن ہو اس کام کیلئے کوشش کرو۔ ہمیں اس وقت تین قسم کی جمعیت کی سخت ضرورت ہے۔ جس پر ہمارے کام اشاعت حقائق و معارف دین کا سارا مدار ہے۔ اول یہ کہ ہمارے ہاتھ میں کم سے کم دو پریس ہوں۔ دوئم ایک خوشخط کاپی نویس۔ سوئم کاغذ۔ ان تینوں مصارف کے لئے اڑھائی سو روپیہ ماہواری کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔ اب چاہیئے کہ ہر ایک دوست اپنی اپنی ہمت اور مقدرت کے موافق بہت جلد بلاتوقف اس چندہ میں شریک ہو۔ اور یہ چندہ ہمیشہ ماہواری طور سے ایک تاریخ مقررہ پر پہنچ جانا چاہیئے۔ بالفعل یہ تجویز ہوئی ہے کہ بقیہ براہین اور ایک اخبار جاری ہو اور آئندہ جو جو ضرورتیں پیش آئیں گی ان کے موافق وقتًا فوقتًا رسائل نکلتے رہیں گے۔ اور چونکہ یہ تمام کاروبار چندہ پر موقوف ہے اس لئے اس بات کو پہلے سوچ لینا چاہیئے کہ اس قدر اپنی طرف سے چندہ مقرر کریں جو بہ سہولت ماہ بماہ پہنچ سکے۔ اے مردمان دین کوشش کرو کہ یہ کوشش کا وقت ہے اپنے دلوں کو دین کی ہمدردی کیلئے جوش میں لاؤ کہ یہی جوش دکھانے کے دن ہیں۔ اب تم خدا تعالیٰ کو کسی اور عمل سے ایسا راضی نہیں کر سکتے جیسا کہ دین کی ہمدردی سے۔ سو جاگو اور اٹھو اور ہوشیار ہو جاؤ اور دین کی ہمدردی کے لئے وہ قدم اٹھاؤ کہ فرشتے بھی آسمان پر جزاکم اللہ کہیں اس سے مت غمگین ہو کہ لوگ تمہیں کافر کہتے ہیں تم اپنا اسلام خدا تعالیٰ کو دکھلاؤ اور اتنے جھکو کہ بس فدا ہی ہو جاؤ۔
    دوستان خود را نثار حضرت جانان کنید
    در رہِ آن یار جانی جان و دل قربان کنید
    آن دل خوش باش را اندر جہان جویدخوشی
    ازپئے دین محمد کلبۂ احزان کنید
    از تعیش ہا بروں آئید اے مردان حق
    خویشتن را از پئے اسلام سرگردان کنید
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 637
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 637
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/637/mode/1up
    فمنؔ تاب من بعد ظلمہ و اصلح فان اللّٰہ یتوب علیہ ان اللّٰہ غفور رحیم
    بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
    کیفیت جلسہ سالانہ قادیان ضلع گورداسپورہ تاریخ ۲۷ ؍ دسمبر ۱۸۹۲ء بر مکان
    جناب مجدّدِ وقت مسیح الزمان مرزا غلام احمد صاحب سلمہ الرحمن اور اس پر بندہ کی رائے
    جو ملاقات مرزا صاحب موصوف اور معاینہ جلسہ اور اہل جلسہ کے بعد قائم ہوئی
    مرزا صاحب نے مجھے بھی باوجودیکہ ان کو اچھی طرح معلوم تھا کہ میں ان کا مخالف ہوں نہ صرف مخالف بلکہ بدگو بھی اور یہ مکرّ ر سہ کرّ ر مجھ سے وقوع میں آ چکا ہے جلسہ پر بلایا اور چند خطوط جن میں ایک رجسٹری بھی تھا بھیجے۔ اگرچہ پیشتر بسبب جہالت اور مخالفت کے میرا ارادہ جانے کا نہ تھا لیکن مرزا صاحب کے بار بار لکھنے سے میرے دل میں ایک تحریک پیدا ہوئی۔ اگر مرزا صاحب اس قدر شفقت سے نہ لکھتے تو میں ہرگز نہ جاتا اور محروم رہتا۔ مگر یہ انہیں کا حوصلہ تھا۔ آج کل کے مولوی تو اپنے سگے باپ سے بھی اس شفقت اور عزت سے پیش نہیں آتے۔ میں ۲۷ ؍ تاریخ کو دوپہر سے پہلے قادیان میں پہنچا۔ اس وقت مولوی حکیم نور الدین صاحب مرزا صاحب کی تائید میں بیان کر رہے تھے اور قریب ختم کے تھا۔ افسوس کہ میں نے پورا نہ سنا۔ لوگوں سے سنا کہ بہت عمدہ بیان تھا۔ پھر حامد شاہ صاحب نے اپنے اشعار مرزا صاحب کی صداقت اور تعریف میں پڑھے۔ لیکن چونکہ مجھے ہنوز رغبت نہیں تھی اور میرا دل غبار آلودہ تھا کچھ شوق اور محبت سے نہیں سنا۔ لیکن اشعار عمدہ تھے۔ اللہ تعالیٰ مصنّف کو جزائے خیر عنایت فرماوے۔
    جب میں مرزا صاحب سے ملا اور وہ اخلاق سے پیش آئے تو میرا دل نرم ہوا گویا مرزا صاحب کی نظر سرمہ کی سلائی تھی جس سے غبار کدورت میرے دل کی آنکھوں سے دور ہوگیا اور غیظ و غضب کے نزلہ کا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 638
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 638
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/638/mode/1up
    پانیؔ خشک ہونے لگا اور کچھ کچھ دھندلا سا مجھے حق نظر آنا شروع ہوا اور رفتہ رفتہ باطنی بینائی درست ہوئی۔ مرزا صاحب کے سوا اور کئی بھائی اس جلسہ میں ایسے تھے کہ جن کو میں حقارت اور عداوت سے دیکھتا تھا اب ان کو محبت اور الفت سے دیکھنے لگا اور یہ حال ہوا کہ کل اہل جلسہ میں جو مرزا صاحب کے زیادہ محب تھے وہ مجھے بھی زیادہ عزیز معلوم ہونے لگے۔ بعد عصر مرزا صاحب نے کچھ بیان فرمایا جس کے سننے سے میر ے تمام شبہات رفع ہوگئے اور آنکھیں کھل گئیں۔ دوسرے روز صبح کے وقت ایک امرتسری وکیل صاحب نے اپنا عجیب قصہ سنایا جس سے مرزا صاحب کی اعلیٰ درجہ کی کرامت ثابت ہوئی۔ جس کا خلاصہ یہ ہے کہ وکیل صاحب پہلے سنت جماعت مسلمان تھے۔ جب جوان ہوئے رسمی علم پڑھا تو دل میں بسبب مذہبی علم سے ناواقفیّت اور علمائے وقت وپیرانِ زمانہ کے باعمل نہ ہونے کے شبہات پیدا ہوئے اور تسلی بخش جواب کہیں سے نہ ملنے کے باعث سے چند بار مذہب تبدیل کیا۔ُ سنّی سے شیعہ بنے وہاں بجز تبرّا بازی اور تعزیہ سازی کچھ نظر نہ آیا۔ آریہ ہوئے چند روز وہاں کا مزا بھی چکھا۔ مگر لطف نہ آیا۔ برہمو میں شامل ہوئے۔ ان کا طریق اختیار کیا۔ لیکن وہاں بھی مزا نہ پایا۔ نیچری بنے لیکن اندرونی صفائی یا خدا کی محبت۔ کچھ نورانیت کہیں بھی نظر نہ آئی۔ آخر مرزا صاحب سے ملے اور بہت بیباکانہ پیش آئے۔ مگر مرزا صاحب نے لطف سے مہربانی سے کلام کیا۔ اور ایسا اچھا نمونہ دکھایا کہ آخرکار اسلام پر پورے پورے جم گئے اور نمازی بھی ہوگئے۔ اللہ و رسولؐ کے تابعدار بن گئے۔ اب مرزا صاحب کے بڑے معتقد ہیں۔
    رات کو مرزا صاحب نے نواب صاحب ۱؂ کے مقام پر بہت عمدہ تقریر کی اور چند اپنے خواب اور الہام بیان فرمائے۔ چند لوگوں نے صداقت الہام کی گواہیاں دیں جنکے روبرو وہ الہام پورے ہوئے۔ ایک صاحب نے صبح کو بعد نماز صبح عبداللہ صاحب غزنوی رحمۃ اللہ علیہ کا ایک خواب سنایا۔ جبکہ عبداللہ صاحب خَیردی گاؤں میں تشریف
    ۱؂ نواب صاحب مالیر کوٹلہ جو اُس وقت مع چنداپنے ہمراہیان کے شریک جلسہ تھے۔۱۲
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 639
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 639
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/639/mode/1up
    رکھتےؔ تھے۔ عبداللہ صاحب نے فرمایا ہم نے محمد حسین بٹالوی کو ایک لمبا کرتہ پہنے دیکھا اور وہ کرتہ پارہ پارہ ہوگیا۔ یہ بھی عبداللہ صاحب نے فرمایا تھا کہُ کرتے سے مراد علم ہے۔ آگے پارہ پارہ ہونے سے عقلمند خود سمجھ سکتا ہے کہ گویا علم کی پردہ دری مراد ہے جو آجکل ہو رہی ہے اور معلوم نہیں کہ کہاں تک ہوگی۔ جو اللہ کے ولی کو ستاتا ہے گویا اللہ تعالیٰ سے لڑتا ہے۔ آخر پچھڑے گا۔ اب مجھے بخوبی ثابت ہوا کہ وہ لوگ بڑے بے انصاف ہیں جو بغیر ملاقات اور گفتگو کے مرزا صاحب کو دور سے بیٹھے دجال کذاب بنا رہے ہیں اور ان کے کلام کے غلط معنے گھڑ رہے ہیں یا کسی دوسرے کی تعلیم کو بغیر تفتیش مان لیتے ہیں اور مرزا صاحب سے اس کی بابت تحقیق نہیں کرتے۔ مرزا صاحب جو آسمانی شہد اُگل رہے ہیں اس کو وہ شیطانی زہر بتاتے ہیں اور بسبب سخت قلبی اور حجاب عداوت کے دور ہی سے گلاب کو پیشاب کہتے ہیں اور عوام اپنے خواص کے تابع ہو کر اس کے کھانے پینے سے باز رہتے ہیں اور اپنا سراسر نقصان کرتے ہیں۔ سب سے بڑھ کر اس عاجز کے قدیمی دوست یا پرانے مقتدا مولوی محمد حسین صاحب بٹالوی لوگوں کو مرزا صاحب سے ہٹانے اور نفرت دلانے میں مصروف ہیں جن کو پہلے پہل مرزا صاحب سے بندہ نے بدظن کیا تھا جس کے عوض میں اس دفعہ انہوں نے مجھ بہکایا اور صراط مستقیم سے جدا کر دیا۔ چلو برابر ہوگئے۔ مگر مولوی صاحب ہنوز درپے ہیں۔ اب جو جلسہ پر مرزا صاحب نے مجھے طلب کیا تو مولوی صاحب کو بھی ایک مخبر نے خبر دی۔ انہوں نے اپنے وکیل کی معرفت مجھے ایک خط لکھا جس میں ناصح مشفق نے مرزا صاحب کو اس قدر بُرا بھلا لکھا اور ایسے ناشائستہ الفاظ قلم سے نکالے کہ جن کا اعادہ کرتے ہوئے شرم آتی ہے۔ مولوی صاحب نے یہ بھی لحاظ نہ کیا کہ علاوہ بزرگ ہونے کے مرزا صاحب میرے کس قدر قریبی رشتہ دار ہیں پھر دعویٰ محبت ہے۔ افسوس۔
    اس جلسہ پر تین سو سے زیادہ شریف اور نیک لوگ جمع تھے جن کے چہروں سے مسلمانی نور ٹپک رہا تھا امیر، غریب، نواب، انجینئر، تھانہ دار، تحصیلدار، زمیندار، سوداگر، حکیم،غرض ہر قسم کے لوگ تھے۔ ہاں چند مولوی بھی تھے مگر مسکین مولوی۔ مولوی کے ساتھ مسکین اور منکسر کا لفظ یہ مرزا صاحب کی کرامت ہے کہ مرزا صاحب سے مل کر مولوی بھی مسکین بن جاتے ہیں ورنہ آجکل مسکین مولوی اور بدعات سے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 640
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 640
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/640/mode/1up
    بچنےؔ والا صوفی کبریت احمر اور کیمیائے سعادت کا حکم رکھتا ہے۔ مولوی محمد حسین صاحب اپنے دل میں غور فرما کر دیکھیں کہ وہ کہاں تک مسکینی سے تعلق رکھتے ہیں۔ ہرگز نہیں۔ ان میں اگر مسکینی ہوتی تو اس قدر فساد ہی کیوں ہوتا۔ یہ نوبت بھی کیوں گذرتی۔ اس قدر ان کے متبعین کو ان سے عداوت اور نفرت کیوں ہوتی۔ اہلحدیث اکثر ان سے بیزار کیوں ہو جاتے۔ اگر مولوی صاحب اس میرے بیان کو غلط خیال فرماویں تو میں انہیں پر حوالہ کرتا ہوں۔ انصافًا و ایمانًا اپنے احباب کی ایک فہرست تو لکھ کر چھپوا دیں کہ جو اُن سے ایسی محبت رکھتے ہیں جیسا کہ مرزا صاحب کے مرید مرزا صاحب سے محبت رکھتے ہیں۔ مجھے قیافہ سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ وقت عنقریب ہے کہ جناب مرزا صاحب کی خاکِ پا کو اہل بصیرت آنکھوں میں جگہ دیں اور اکسیر سے بہتر سمجھیں اور تبرک خیال کریں۔ مرزا صاحب کے سینکڑوں ایسے صادق دوست ہیں جو مرزا صاحب پر دل و جان سے قربان ہیں۔ اختلاف کا تو کیا ذکر ہے۔ روبرو اُف تک نہیں کرتے ؂ سرتسلیم خم ہے جو مزاج یار میں آئے۔ مولوی محمد حسین صاحب زیادہ نہیں چار پانچ آدمی تو ایسے اپنے شاگرد یا دوست بتا ویں جو پوری پوری (خدا کے واسطے) مولوی صاحب سے محبت رکھتے ہوں اور دل و جان سے فدا ہوں اور اپنے مال کو مولوی صاحب پر قربان کر دیں اور اپنی عزت کو مولوی صاحب کی عزت پر نثار کرنے کیلئے مستعد ہوں۔ اگر مولوی صاحب یہ فرماویں کہ سچوں اور نیکوں سے لوگوں کو محبت نہیں ہوتی بلکہ جھوٹے اور مکاروں سے لوگوں کو اُلفت ہوتی ہے تو میں پوچھتا ہوں کہ اصحاب و اہل بیت کو جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت تھی یا نہیں۔ وہ حضرت کے پورے پورے تابع تھے یا ان کو اختلاف تھا۔ بہت نزدیک کی ایک بات یاد دلاتا ہوں کہ مولوی عبداللہ صاحب غزنوی جو میرے اور نیز محمد حسین صاحب کے پیر و مرشد تھے۔ اُن کے مرید اُن سے کس قدر محبت رکھتے تھے اور کس قدر اُن کے تابع فرمان تھے۔ سنا ہے کہ ایک دفعہ انہوں نے اپنے ایک خاص مرید کو کہا کہ تم نجد واقعہ ملک عرب میں جاکر رسائل توحید مصنّفہ محمد بن عبدالوہاب نقل کر لاؤ۔ وہ مرید فوراً رخصت ہوا۔ ایک دم کا بھی توقف نہ کیا۔ حالانکہ خرچ راہ و سواری بھی اس کے پاس نہ تھا۔ مولوی محمد حسین صاحب اگر اپنے کسی دوست کو بازار سے پیسہ دے کر دہی لانے کو فرماویں تو شاید
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 641
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 641
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/641/mode/1up
    منظوؔ ر نہ کرے۔ اور اگر منظور کرے تو ناراض ہو کر اور شاید غیبت میں لوگوں سے گلہ بھی کرے۔ ع۔ ببیں تفاوتِ رہ از کجا است تا بکجا۔ یہ نمونہ کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ ہر صدی میں ہزاروں اولیاء (جن پر ان کے زمانہ میں کفر کے فتوے بھی ہوتے رہے ہیں) گذرے ہیں۔ اور کم و بیش ان کے مرید ان کے فرمانبردار اور جان نثار ہوئے ہیں۔ یہ نتیجہ ہے نیکوں کی خدا کے ساتھ دلی محبت کا۔ مرزا صاحب کو چونکہ سچی محبت اپنے مولا سے ہے اس لئے آسمان سے قبولیّت اتری ہے اور رفتہ رفتہ باوجود مولویوں کی سخت مخالفت کے سعید لوگوں کے دلوں میں مرزا صاحب کی الفت ترقی کرتی جا رہی ہے (اگرچہ ابو سعید صاحب خفا ہی کیوں نہ ہوں) اب اس کے مقابل میں مولوی صاحب جو آج ماشاء اللہ آفتاب پنجاب بنے ہوئے ہیں اپنے حال میں غور فرماویں کہ کس قدر سچے محب ان کے ہیں اور ان کے سچے دوستوں کا اندرونی کیا حال ہے۔ شروع شروع میں کہتے ہیں مولوی صاحب کبھی اچھے شخص تھے مگر اب تو انہیں ُ حبِّ جَاہ اور علم و فضل کے فخر نے عرشِ عزت سے خاکِ مذلت پر گرا دیا۔ ا نّا للّٰہ و ا نّا الیہ راجعون۔
    اب مولوی صاحب غور فرماویں کہ یہ کیا پتھر پڑ گئے کہ مولوی اور خصوصاً مولوی محمد حسین صاحب سرآمد علماء پنجاب (بزعم خود) سے لوگوں کو اس قدر نفرت کہ جس کے باعث مولوی صاحب کو لاہور چھوڑنا پڑا۔ موحدین کی جامع مسجد میں اگر اتفاقاً لاہور میں تشریف لے جاویں تو مارے ضد اور شرم کے داخل نہیں ہو سکتے۔ اور مرزا صاحب کے پاس (جو بزعم مولوی صاحب کافر بلکہ اکفر اور دجّال ہیں)۔ گھر بیٹھے لاہور، امرتسر، پشاور، کشمیر، جموں، سیالکوٹ، کپورتھلہ، لدھیانہ، بمبئی، ممالک شمال و مغرب، اودھ، مکہ معظمہ وغیرہ بلاد سے لوگ گھر سے بوریا بدھنا باندھے چلے آتے ہیں۔ پھر آنے والے بدعتی نہیں۔ مشرک نہیں۔ جاہل نہیں۔ کنگال نہیں۔ بلکہ موحد۔ اہلحدیث۔ مولوی۔ مفتی۔ پیرزادے۔ شریف۔ امیر۔ نواب۔ وکیل۔ اب ذرا سوچنے کا مقام ہے کہ باوجود مولوی محمد حسین کے گرانے کے اور اکثر مولویوں سے کفر کے فتوے پر مہریں لگوانے کے اللہ جلّ شانہٗ نے مرزا صاحب کو کس قدر چڑھایا اور کس قدر
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 642
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 642
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/642/mode/1up
    خلقؔ خدا کے دلوں کو متوجہ کر دیا کہ اپنا آرام چھوڑ کر۔ وطن سے جدا ہو کر۔ روپیہ خرچ کر کے قادیان میں آکر زمین پر سوتے بلکہ ریل میں ایک دو رات جاگے بھی ضرور ہوں گے اور کئی پیادہ چل کر بھی حاضر ہوئے۔ میں نے ایک شخص کے بھی منہ سے کسی قسم کی شکایت نہیں سنی۔ مرزا صاحب کے گرد ایسے جمع ہوتے تھے جیسے شمع کے گرد پروانے۔ جب مرزا صاحب کچھ فرماتے تھے تو ہمہ تن گوش ہو جاتے تھے۔ قریباً چالیس پچاس شخص اس جلسہ پر مرید ہوئے۔ مرزا احمد بیگ کے انتقال کی پیشگوئی کے پورے ہونے کا ذکر بھی مرزا صاحب نے ساری خلقت کے روبرو سنایا جس کے بارے میں نور افشاں نے مرزا صاحب کو بہت کچھ برا بھلا کہا تھا۔ اب نور افشاں خیال کرے کہ پیشگوئیاں اس طرح پوری ہوتی ہیں۔ یہ بات بجز اہل اسلام کے کسی دین والے کو آجکل حاصل نہیں اور مسلمان خصوصاً مخالفین سوچیں کہ یہ خوب بات ہے کہ کافر اکفر۔ دجال۔ مکار کی پیشگوئیاں باوجودیکہ اللہ تعالیٰ پر افتراؤں کی طومار باندھ رہا ہے اللہ تعالیٰ پوری کر دے اور رسول اللہ صلعم کے (بزعمِ خود) نائبین کی باتوں میں خاک بھی اثر نہ دے اور ان کو ایسا ذلیل کرے کہ لاہور چھوڑ کر بٹالہ میں آنا پڑے۔ افسوس صد افسوس آجکل کے ان مولویوں کی نابینائی پر جو العلم حجاب الاکبر کے نیچے دبے پڑے ہیں اور بایں وجہ ایک ایسے برگزیدہ بندہ کا نام دجال و کافر رکھتے ہیں جس کی اللہ تعالیٰ کو ایسی محبت ہے کہ دین کی خدمت پر مقرر کر رکھا ہے اور وہ بندۂ خدا آریہؔ ، برہموؔ ، عیسائیوںؔ ، نیچریوںؔ سے لڑ رہا ہے۔ کوئی کافر تاب مقابلہ نہیں لا سکتا۔ نہ کوئی مولوی باوجود کافرؔ ، ملعونؔ ، دجالؔ بنانے کے خلقت کے دلوں کو ان کی طرف سے ہٹا سکتا ہے۔ معاذاللہ، عصاء موسیٰ و ید بیضا کو بزعم خود مولویان پسپا اور رسوا کر رہا ہے۔ نائبین رسول مقبول میں کوئی برکت کچھ نورانیت نہیں رہی۔ اتنا بھی سلیقہ نہیں کہ اپنے چند شاگردوں کو بھی قابو میں رکھ سکیں اور خلق محمدی کا نمونہ دکھا کر اپنا شیفتہ بنالیں۔ کسی ملک میں ہدایت پھیلانا اور مخالفین اسلام کو زیر کرنا تو درکنار ایک شہر بلکہ ایک محلہ کو بھی درست نہیں کر سکتے۔ برخلاف اس کے مرزا صاحب نے شرقًا غربًا مخالفین اسلام کو دعوت اسلام کی اور ایسا نیچا
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 643
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 643
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/643/mode/1up
    کرؔ دکھایا کہ کوئی مقابل آنے جوگا نہیں رہا۔ اکثر نیچریوں کو جو مولوی صاحبان سے ہرگز اصلاح پر نہیں آ سکے توبہ کرائی اور پنجاب سے نیچریت کا اثر بہت کم کر دیا۔ اب وہی نیچری ہیں جو مسلمان صورت بھی نہیں تھے مرزا صاحب کے ملنے سے مومن سیرت ہوگئے۔ اہلکاروں، تھانہ داروں نے رشوتیں لینی چھوڑ دیں۔ نشہ بازوں نے نشے ترک کر دئیے۔ کئی لوگوں نے حقہ ترک کر دیا۔ مرزا صاحب کے شیعہ ۱؂ مریدوں نے تبرّا ترک کر دیا۔ صحابہ سے محبت کرنے لگے۔ تعزیہ داری، مرثیہ خوانی موقوف کر دی۔ بعض پیر زادے جو مولوی محمد حسین بٹالوی بلکہ محمد اسماعیل شہید کو بھی کافر سمجھتے تھے مرزا صاحب کے معتقد ہونے کے بعد مولانا اسماعیل شہید کو اپنا پیشوا اور بزرگ سمجھنے لگے۔ اگر یہ تاثیریں دجّالین۔ کذّابین میں ہوتی ہیں اور نائبین رسول مقبول نیک تاثیروں سے محروم ہیں تو بصد خوشی ہمیں دجالی ہونا منظور ہے۔ پھلوں ہی سے تو درخت پہچانا جاتا ہے اللہ تعالیٰ کو بھی لوگوں نے صفات سے پہچانا۔ ورنہ اس کی ذات کسی کو نظر نہیں آتی۔ کسی تندرست ہٹے کٹے کا نام اگر بیمار رکھ دیں تو واقعی وہ بیمار نہیں ہو سکتا۔ اسی طرح جو اللہ تعالیٰ کے نزدیک مومن پاکباز ہے اور جس کے دل میں اللہ اور رسولؐ کی محبت ہے اس کو کوئی منافق، کافر، دجال وغیرہ لقب دے تو کیا حرج ہے۔ سفید کسی کے کالا کہنے سے کالا نہیں ہو سکتا۔ اور چمگادڑ کی دشمنی سے آفتاب لائق مذمت نہیں۔ یزیدی عملداری سے حسینی گروہ اگرچہ تکالیف تو پا سکتا ہے مگر نابود نہیں ہو سکتا۔ رفتہ رفتہ تکالیف برداشت کر کے ترقی کرے گا اور کرتا جاتا ہے۔ یعنی مولویوں کے سدّ راہ ہونے سے مرزا صاحب کا گروہ مٹ نہیں سکتا بلکہ ایسا حال ہے جیسا دریا میں بندھ باندھنے سے دریا رک نہیں سکتا لیکن چند روز رُکا معلوم ہوتا ہے آخر بند ٹوٹے گا اور نہایت زور سے دریا بہہ نکلے گا۔ اور آس پاس کے مخالفین کی بستیوں کو بہا لے جاوے گا۔ آندھی اور ابر سورج کو چھپا نہیں سکتے ۔خود ہی چند روز میں گم ہو جاتے ہیں۔ اسی طرح چند روز میں یہ غل غپاڑہ فرو ہو جائے گا اور مرزا صاحب کی صداقت کا سورج چمکتا ہوا نکل آوے گا۔ پھر نیک بخت تو افسوس کر کے مرزا صاحب سے
    ۱؂ یعنی چند مرید مرزا صاحب کے ایسے بھی ہیں جو پہلے شیعہ مذہب رکھتے تھے۔
    مواؔ فق ہو جاویں گے اور پچھلی غلطی پر پچھتاویں گے اور مرزا صاحب کی کشتی میں جو مثل سفینہ نوح علیہ السلام کے ہے سوار ہو جائیں گے۔ لیکن بدنصیب اپنے مولویوں کے مکر اور غلط بیانی کے پہاڑوں پر چڑھ کر جان بچانا چاہیں گے۔ مگر ایک ہی موج میں غرق بحر ضلالت ہو کر فنا ہو جاویں گے۔ یا الٰہی ہمیں اپنی پناہ میں رکھ اور فہم کامل عنایت فرما۔ امت محمدیؐ کا تو ہی نگہبان ہے۔ حجابوں کو اٹھا دے۔ صداقت کو ظاہر فرما دے۔ مسلمانوں کو اختلاف سے راہ راست پر لگا دے۔ آمین یا ربّ العالمین۔
    العلم حجاب الاکبر جو مشہور قول ہے اس کی صداقت آج کل بخوبی ظاہر ہو رہی ہے۔ پہلے اس قول سے مجھے اتفاق نہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 644
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 644
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/644/mode/1up
    تھا۔ لیکن اب اس پر پورا یقین ہوگیا۔ جس قدر مرزا صاحب کے مخالف مولوی ہیں اس قدر اور کوئی نہیں۔ بلکہ اوروں کو عالموں ہی نے بہکایا ہے ورنہ آج تک ہزاروں بیعت کرلیتے۔ اور ایک جم غفیر مرزا صاحب کے ساتھ ہو جاتا لیکن مخالفت کا ہونا کچھ تعجب نہیں کیونکہ اگر ایسا زمانہ جس میں اس قسم کے فساد ہیں جس کی نظیر پچھلی صدیوں میں نامعلوم ہے نہ آتا تو ایسا مصلح بھی کیوں پیدا ہوتا۔ دجّال ہی کے قتل کو عیسیٰ تشریف لائے ہیں۔ اگر دجّال نہ ہوتا تو عیسیٰ کا آنا محال تھا۔ اور دنیا گمراہ نہ ہو جاتی تو مہدی کی کیا ضرورت تھی۔ اللہ تعالیٰ ہر ایک کام کو اس کے وقت پر کرتا ہے۔ یا اللہ تو ہمیں اپنے رسولؐ کی اپنے اولیاء کی محبت عنایت کر اور بے یقینی اور تردّدات سے امان بخش۔ صادقین کے ساتھ ہمیں الفت دے۔ کاذبوں سے پناہ میں رکھ۔ ہماری انانیت دور کر دے اور حرص و ہوا سے نجات بخش۔ آمین یا رب العالمین۔
    راقم ۔ناصر نواب تاریخ ۲؍ جنوری ۱۸۹۳ ؁ء
    اشعار مصنفہ مولوی محمد عبداللہ خاں صاحب دوم مدرّس عربی مہندر کالج پٹیالہ
    دل میں جس شخص کے کچھ نور صفا ہوتا ہے
    حق کی وہ بات پہ سو جاں سے فدا ہوتا ہے
    حق کی جانب جو وہ ہر وقت جھکا ہوتا ہے
    لوم لائم سے نہ خوف اس کو ذرا ہوتا ہے
    دیکھنے والے یہ کہتے ہیں کہ کیا ہوتا ہے
    ان کو کہہ دو کہ یونہی فضل خدا ہوتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 645
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 645
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/645/mode/1up
    ضمیمہؔ اخبار ریاض ہند امرتسر مطبوعہ یکم مارچ ۱۸۸۶ء
    بسم اللہ الرحمن الرحیم
    نحمدہ و نصلی علی رسولہ الکریم
    جان و د لم فد ا ئے جما ل محمدؐ ا ست خاکم نثار کوچۂ آل محمدؐ است
    دیدم بعین قلب و شنیدم بگوش ہوش در ہر مکان ندائے جلال محمدؐ است
    این چشمۂ روان کہ بخلق خدا دہم یک قطرۂ ز بحر کمال محمدؐ است
    این آتشم زآتش مہر محمدؐیست و این آب من ز آب زلال محمدؐ است
    رسالہ سراج منیر مشتمل بر نشانہائے رب قدیر
    یہ رسالہ اس احقر (مؤلف براہین احمدیہ) نے اس غرض سے تالیف کرنا چاہا ہے کہ تا منکرین حقیّت اسلام و مکذبین رسالت حضرت خیرالانام علیہ و آلہ الف الف سلام۔ کی آنکھوں کے آگے ایک ایسا چمکتا ہوا چراغ رکھا جائے جس کی ہرایک سمت سے گوہر آبدار کی طرح روشنی نکل رہی ہے اور بڑی بڑی پیشگوئیوں پر جو ہنوز وقوع میں نہیں آئیں مشتمل ہے چنانچہ خود خداوند کریم جلّ شانہٗ و عز اسمہ نے جس کو پوشیدہ بھیدوں کی خبر ہے۔ اس ناکارہ کو بعض اسرار مخفیہ و اخبار غیبیہ پر مطلع کر کے بارعظیم سے سبکدوش فرمایا حقیقت میں اسی کا فضل ہے اور اسی کا کام جس نے چار طرفہ کشاکش مخالفوں و موافقوں سے اس ناچیز کوَ مخلصی بخشی۔ ع ۔قصہ کوتہ کرد ورنہ درد سر بسیار بود۔ اب یہ رسالہ قریب الاختتام ہے اور انشاء اللہ القدیر صرف چند ہفتوں کا کام ہے۔ * اور اس رسالہ میں تین قسم کی پیشگوئیاں ہیں۔ اول وہ پیشگوئیاں کہ جو خود اس احقر کی ذات سے تعلق رکھتی ہیں یعنے جو کچھ راحت یا رنج یا حیات یا وفات اس ناچیز سے متعلق ہے یا جو کچھ تفضلات و انعامات الٰہیہ کا
    وعدہ اس ناچیز کو دیا گیا ہے وہ ان پیشگوئیوں میں مندرج ہے۔ دوسری وہ پیشگوئیاں جو بعض احباب یا عام طور پر کسی ایک شخص یا بنی نوع سے متعلق ہیں اور ان میں سے ابھی کچھ کام باقی ہے اور اگر خدا تعالیٰ نے چاہا تو وہ بقیہ بھی طے ہو جاوے گا۔ تیسری وہ پیشگوئیاں جو مذاہب غیر کے پیشواؤں یا واعظوں یا ممبروں سے تعلق رکھتی ہیں اور اس قسم میں ہم نے صرف بطور نمونہ چند آدمی آریہ صاحبوں اور چند قادیان کے ہندوؤں کو لیا ہے جن کی نسبت مختلف قسم کی پیشگوئیاں ہیں کیونکہ انہیں میں آجکل نئی نئی تیزی اور انکا ر اشد پایا جاتا ہے اور ہمیں اس تقریب پر یہ بھی خیال ہے کہ خداوند کریم ہماری محسن گورنمنٹ انگلشیہ کو جس کے احسانات سے ہم کو بتمام تر فراغت و آزادی گوشہ خلوت میسر و کنج امن و آسائش حاصل ہے ظالموں کے ہاتھ سے اپنی حفظ و حمایت میں رکھے اور روس منحوس کو اپنی سرگردانیوں میں محبوس و معکوس و مبتلا کر کے ہماری گورنمنٹ کو فتح و نصرت نصیب کرے تاہم وہ بشارتیں بھی (اگر مل جائیں) اس عمدہ موقع پر درج رسالہ کر دیں انشاء اللہ تعالیٰ اور چونکہ پیشگوئیاں کوئی اختیاری بات نہیں ہے تا ہمیشہ اور ہر حال میں خوشخبری پر دلالت کریں اس لئے ہم بانکسار تمام اپنے موافقین و مخالفین کی خدمت میں عرض کرتے ہیں کہ اگر وہ کسی پیشگوئی کو اپنی نسبت ناگوار طبع (جیسے خبر موت فوت یا کسی اور مصیبت کی نسبت) پاویں تو اس بندہ ناچیز کو معذور تصور فرماویں بالخصوص وہ صاحب جو بباعث مخالفت و مغایرت مذہب اور بوجہ نامحرم اسرار ہونے کے حسن ظن کی طرف بمشکل رجوع کر سکتے ہیں جیسے منشی اندرمن صاحب
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 646
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 646
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/646/mode/1up
    * یہ رسالہ بعض مصالح کی وجہ سے اب تک ۲۵ فروری ۱۸۹۳ء ہے چھپ نہیں سکا مگر متفرق طور پر اس کی بعض پیشگوئیاں شائع ہوتی رہی ہیں اور انشاء اللہ تعالیٰ آئندہ بھی شائع ہوتی رہیں گی۔ منہ
    مرادؔ آبادی و پنڈت لیکھرام صاحب پشاوری وغیرہ جن کی قضا و قدر کے متعلق غالباً اس رسالہ میں بقید وقت و تاریخ کچھ تحریر ہوگا۔ ان صاحبوں کی خدمت میں دلی صدق سے ہم گذارش کرتے ہیں کہ ہمیں فی الحقیقت کسی کی بدخواہی دل میں نہیں بلکہ ہمارا خداوند کریم خوب جانتا ہے کہ ہم سب کی بھلائی چاہتے ہیں اور بدی کی جگہ نیکی کرنے کو مستعد ہیں اور بنی نوع کی ہمدردی سے ہمارا سینہ منور و معمور ہے اور سب کے لئے ہم راحت و عافیت کے خواستگار ہیں لیکن جو بات کسی موافق یا مخالف کی نسبت یا خود ہماری نسبت کچھ رنجدہ ہو تو ہم اس میں بکلی مجبور و معذور ہیں۔ ہاں ایسی بات کے دروغ نکلنے کے بعد جو کسی دل کے دُکھنے کا موجب ٹھہرے۔ ہم سخت لعن و طعن کے لائق بلکہ سزا کے مستوجب ٹھہریں گے۔ ہم قسمیہ بیان کرتے ہیں اور عالم الغیب کو گواہ رکھ کر کہتے ہیں کہ ہمارا سینہ سراسر نیک نیتی سے بھرا ہوا ہے اور ہمیں کسی فرد بشر سے عداوت نہیں اور گو کوئی بدظنی کی راہ سے کیسی ہی بدگوئی و بد زبانی کی مشق کر رہا ہے اور نا خدا ترسی سے ہمیں آزار دے رہا ہے ہم پھر بھی اس کے حق میں دعا ہی کرتے ہیں کہ اے خدائے قادر و توانا اس کو سمجھ بخش اور ہم اس کو اس کے ناپاک خیال اور ناگفتنی باتوں میں معذور سمجھتے ہیں کیونکہ ہم جانتے ہیں کہ ابھی اس کا مادہ ہی ایسا ہے اور ہنوز اُس کی سمجھ اور نظر اسی قدر ہے کہ جو حقائق عالیہ تک نہیں پہنچ سکتی۔
    زاہد ظاہر پرست از حال ما آگاہ نیست
    در حق ما ہرچہ گوید جائے ہیچ اکراہ نیست
    اور باوجود اس رحمت عام کے کہ جو فطرتی طور پر خدائے بزرگ و برتر نے ہمارے وجود میں رکھی ہے اگر کسی کی نسبت کوئی بات نا ملائم یا کوئی پیشگوئی وحشت ناک بذریعہ الہام ہم پر ظاہر ہو تو وہ عالم مجبوری ہے جس کو ہم غم سے بھری ہوئی طبیعت کے ساتھ اپنے رسالہ میں تحریر کریں گے۔ چنانچہ ہم پر خود اپنی نسبت اپنے بعض جدّی اقارب کی نسبت اپنے بعض دوستوں کی نسبت اور بعض اپنے فلاسفر قومی بھائیوں کی نسبت کہ گویا نجم الہند ہیں اور ایک دیسی امیر نووارد پنجابی الاصل کی نسبت بعض متوحش خبریں جو کسی کے ابتلاء اور کسی کی موت و فوت اعزا اور کسی کی خود اپنی موت پر دلالت کرتی ہیں جو انشاء اللہ القدیر بعد تصفیہ لکھی جائیں گی منجانب اللہ منکشف ہوئی ہیں۔ اور ہر ایک کے لئے ہم دعا کرتے ہیں کیونکہ ہم جانتے ہیں کہ اگر تقدیر معلق ہو تو دعاؤں سے بفضلہ تعالیٰ ٹل سکتی ہے۔ اسی لئے رجوع کرنے والی مصیبتوں کے وقت مقبولوں کی طرف رجوع کرتے ہیں اور شوخیوں اور بے راہیوں سے باز آجاتے ہیں- بااین ہمہ اگر کسی صاحب پر کوئی ایسی پیشگوئی شاق گذرے تو وہ مجاز ہیں کہ یکم مارچ ۱۸۸۶ ؁ء سے یا اس تاریخ سے جو کسی اخبار میں پہلی دفعہ یہ مضمون شائع ہو ٹھیک ٹھیک دو ہفتہ کے اندر اپنی دستخطی تحریر سے مجھ کو اطلاع دیں تا وہ پیشگوئی جس کے ظہور سے وہ ڈرتے ہیں،اندراج رسالہ سے علیحدہ رکھی جاوے اور موجب دل آزاری سمجھ کر کسی کو اس پر مطلع نہ کیا جائے اور کسی کو اس کے وقت ظہور سے خبر نہ دی جائے۔
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 647
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 647
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/647/mode/1up
    انؔ ہر سہ قسم کی پیشگوئیوں میں سے جو انشاء اللہ رسالہ میں بہ بسط تمام درج ہوں گی۔ پہلی پیشگوئی جو خود اس احقر سے متعلق ہے۔ آج ۲۰ فروری ۱۸۸۶ ؁ء میں جو مطابق پندرہ جمادی الاوّل ہے برعایت ایجاز و اختصار کلمات الہامیہ نمونہ کے طور پر لکھی جاتی ہے اور مفصل رسالہ میں درج ہوگی، انشاء اللہ تعالیٰ۔ پہلی پیشگوئی بالہام اللہ تعالیٰ و اعلامہ عزّوجلّ۔ خدائے رحیم و کریم بزرگ و برتر نے جو ہر یک چیز پر قادر ہے (جلّ شانہٗ و عزّاسمہ) مجھ کو اپنے الہام سے مخاطب کر کے فرمایاکہ میں تجھے ایک رحمت کا نشان دیتا ہوں اسی کے موافق جو تو نے مجھ سے مانگا۔ سو میں نے تیری تضرّعات کو سنا اور تیری دعاؤں کو اپنی رحمت سے بپایہ قبولیت جگہ دی اور تیرے سفر کو (جو ہوشیارپور اور لدھیانہ کا سفر ہے) تیرے لئے مبارک کر دیا سو قدرت اور رحمت اور قربت کا نشان تجھے دیا جاتا ہے۔ فضل اور احسان کا نشان تجھے عطا ہوتا ہے اور فتح اور ظفر کی کلید تجھے ملتی ہے۔ اے مظفر تجھ پر سلام۔ خدا نے یہ کہا۔ تا وہ جو زندگی کے خواہاں ہیں موت کے پنجہ سے نجات پاویں اور وہ جو قبروں میں دبے پڑے ہیں باہر آویں اور تا دین اسلام کا شرف اور کلام اللہ کا مرتبہ لوگوں پر ظاہر ہو اور تا حق اپنی تمام برکتوں کے ساتھ آجائے اور باطل اپنی تمام نحوستوں کے ساتھ بھاگ جائے اور تا لوگ سمجھیں کہ میں قادر ہوں جو چاہتا ہوں کرتا ہوں اور تا وہ یقین لائیں کہ میں تیرے ساتھ ہوں اور تا انہیں جو خدا کے وجود پر ایمان نہیں لاتے اور خدا اور خدا کے دین اور اس کی کتاب اور اس کے پاک رسول محمد مصطفیٰؐ کو
    انکار اور تکذیب کی نگاہ سے دیکھتے ہیں ایک کھلی نشانی ملے اور مجرموں کی راہ ظاہر ہو جائے۔ سو تجھے بشارت ہو کہ ایک وجیہ اور پاک لڑکا تجھے دیا جائے گا۔ ایک زکی غلام (لڑکا) تجھے ملے گا۔ وہ لڑکا تیرے ہی تخم سے تیری ہی ذر ّ یت و نسل ہوگا۔ خوبصورت پاک لڑکا تمہارا مہمان آتا ہے اس کا نام عنموائیل اور بشیر بھی ہے اس کو مقدس روح دی گئی ہے اور وہ رجس سے پاک ہے وہ نور اللہ ہے مبارک وہ جو آسمان سے آتا ہے اس کے ساتھ فضل ہے جو اس کے آنے کے ساتھ آئے گا وہ صاحب شکوہ اور عظمت اور دولت ہوگا۔ وہ دنیا میں آئے گا اور اپنے مسیحی نفس اور روح الحق کی برکت سے بہتوں کو بیماریوں سے صاف کرے گا۔ وہ کلمۃ اللہ ہے کیونکہ خدا کی رحمت و غیوری نے اسے اپنے کلمہ تمجید سے بھیجا ہے۔ وہ سخت ذہین و فہیم ہوگا اور دل کا حلیم اور علوم ظاہری و باطنی سے ُ پر کیا جائے گا اور وہ تین کو چار کرنے والا ہوگا (اس کے معنے سمجھ میں نہیں آئے) دو شنبہ ہے مبارک دو شنبہ۔ فرزند دلبند گرامی ارجمند مظہر الاوّل والآخر مظہر الحق و العلاء کان اللّٰہ نزل من السماء جس کا نزول بہت مبارک اور جلال الٰہی کے ظہور کا موجب ہوگا۔ نور آتا ہے نور جس کو خدا نے اپنی رضامندی کے عطر سے ممسوح کیا ہم اس میں اپنی روح ڈالیں گے اور خدا کا سایہ اس کے سر پر ہوگا۔ وہ جلد جلد بڑھے گا اور اسیروں کی رستگاری کا موجب ہوگا اور زمین کے کناروں تک شہرت پائے گا اور قومیں اس سے برکت پائیں گی تب اپنے نفسی نقطہ آسمان کی طرف اٹھایا جائے گا۔ و کان امرًا مقضیًّا۔
    پھر خدائے کریم جلّ شانہٗ نے مجھے بشارت دیکر کہا کہ تیرا گھر برکت
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 648
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 648
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/648/mode/1up
    سےؔ بھرے گا اور میں اپنی نعمتیں تجھ پر پوری کروں گا اور خواتین مبارکہ سے جن میں سے تو بعض کو اس کے بعد پائے گا تیری نسل بہت ہوگی اور میں تیری ذریت کو بہت بڑھاؤں گا اور برکت دوں گا مگر بعض ان میں سے کم عمری میں فوت بھی ہوں گے اور تیری نسل کثرت سے ملکوں میں پھیل جائے گی اور ہر یک شاخ تیرے جدی بھائیوں کی کاٹی جائے گی اور وہ جلد لاولد رہ کر ختم ہو جائے گی۔ اگر وہ توبہ نہ کریں گے تو خدا ان پر بلا پر بلا نازل کرے گا یہاں تک کہ وہ نابود ہو جائیں گے ان کے گھر بیواؤں سے بھر جائیں گے اور ان کی دیواروں پر غضب نازل ہوگا۔ لیکن اگر وہ رجوع کریں گے تو خدا رحم کے ساتھ رجوع کرے گا۔ خدا تیری برکتیں اردگرد پھیلائے گا اور ایک اجڑا ہوا گھر تجھ سے آباد کرے گا۔ اور ایک ڈراؤنا گھر برکتوں سے بھر دے گا۔ * تیری ذریت منقطع نہیں ہوگی اور آخری دنوں تک سرسبز رہے گی۔ خدا تیرے نام کو اس روز تک جو دنیا منقطع ہو جائے۔ عزت کے ساتھ قائم رکھے گا اور تیری دعوت کو دنیا کے کناروں تک پہنچا دے گا۔ میں تجھے اٹھاؤں گا اور اپنی طرف بلاؤں گا۔ پر تیرا نام صفحہ زمین سے کبھی نہیں اٹھے گا اور ایسا ہوگا کہ سب وہ لوگ جو تیری ذلت کی فکر میں لگے ہوئے ہیں اور تیرے ناکام رہنے کے در پے اور تیرے نابود کرنے کے خیال میں ہیں
    *نوٹ:یہ ایک پیشگوئی کی طرف اشارہ ہے جو دہم جولائی ۱۸۸۸ ؁ء کے اشتہار میں شائع ہوچکی جس کا ماحصل یہ ہے کہ خدا تعالیٰ نے اس عاجز کے مخالف اور منکر رشتہ داروں کے حق میں نشان کے طور پر پیشگوئی ظاہر کی ہے کہ ان میں سے جو ایک شخص احمد بیگ نام ہے اگر وہ اپنی بڑی لڑکی اس عاجز کو نہیں دے گا تو تین برس کے عرصہ تک بلکہ اس سے قریب فوت ہو جائے گا اور وہ جو نکاح کرے گا وہ روز نکاح سے اڑھائی برس کے عرصہ میں فوت ہوگا اور آخر وہ عورت اس عاجز کی بیویوں میں داخل ہوگی۔ سو اس جگہ اجڑے ہوئے گھر سے وہ اجڑا ہوا گھر مراد ہے۔ منہ
    وہ خود ناکام رہیں گے اور ناکامی اور نامرادی میں مریں گے لیکن خدا تجھے بکلی کامیاب کرے گا اور تیری ساری مرادیں تجھے دے گا۔ میں تیرے خالص اور دلی محبوں کا گروہ بھی بڑھاؤں گا اور انکے نفوس و اموال میں برکت دوں گا اور ان میں کثرت بخشوں گا اور وہ مسلمانوں کے اس دوسرے گروہ پر تا بروز قیامت غالب رہیں گے جو حاسدوں اور معاندوں کا گروہ ہے خدا انہیں نہیں بھولے گا اور فراموش نہیں کرے گا اور وہ علیٰ حسب الاخلاص اپنا اپنا اجر پائیں گے۔ تو مجھ سے ایسا ہے جیسے انبیاء بنی اسرائیل (یعنی ظلّی *طور پر ان سے مشابہت رکھتا ہے) تو مجھ سے ایسا ہے جیسی میری توحید۔ تو مجھ سے اور میں تجھ سے ہوں اور وہ وقت آتا ہے بلکہ قریب ہے کہ خدا بادشاہوں اور امیروں کے دلوں میں تیری محبت ڈالے گا یہاں تک کہ وہ تیرے کپڑوں سے برکت ڈھونڈیں گے۔ اے منکرو اور حق کے مخالفو اگر تم میرے بندہ کی نسبت شک میں ہو۔ اگر تمہیں اس فضل و احسان سے کچھ انکار ہے جو ہم نے اپنے بندہ پر کیا تو اس نشان رحمت کی مانند تم بھی اپنی نسبت کوئی سچا نشان پیش کرو اگر تم سچے ہو۔ اور اگر تم پیش نہ کر سکو اور یاد رکھو کہ ہرگز پیش نہ کر سکو گے تو اس آگ سے ڈرو کہ جو نافرمانوں اور جھوٹوں اور حد سے بڑھنے والوں کیلئے تیار ہے۔فقط
    * حاشیہ : امتی کا کمال یہی ہے کہ اپنے نبی متبوع سے بلکہ تمام انبیاء متبوعین علیہم السلام سے مشابہت پیدا کرے۔ یہی کامل اتباع کی حقیقت اور علت غائی ہے جس کیلئے سورہ فاتحہ میں دعا کرنے کیلئے ہم لوگ مامور ہیں۔ بلکہ یہی انسان کی فطرت میں تقاضا پایا جاتا ہے اور اسی وجہ سے مسلمان لوگ اپنی اولاد کے نام بطور تفاول عیسیٰ، داؤد، موسیٰ، یعقوب، محمدؐ وغیرہ انبیاء علیہم السلام کے نام پر رکھتے ہیں اور مطلب یہ ہوتا ہے کہ وہی اخلاق و برکات بطور ظلّی ان میں بھی پیدا ہوجائیں۔فتدبّر ۔ منہ
    راقم
    خاکسار غلام احمد مؤلف (براہین احمدیہ)
    ہوشیار پور طویلہ شیخ مہر علی صاحب رئیس
    ۲۰ ؍فروری ۱۸۸۶ ؁ء
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 649
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 649
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/649/mode/1up
    بسمؔ اللہ الرحمٰن الرحیم
    (حاشیہ متعلقہ صفحہ ۲ اشتہار ۲۰ فروری ۱۸۸۶ ؁ء مندرجہ آئینہ کمالات اسلام)
    عجب نوریست درجان محمدؐ
    عجب لعلیست درکان محمدؐ
    زظلمتہا دلے آنگہ شود صاف
    کہ گردد از محبّان محمدؐ
    عجب دارم دل آن ناکسان را
    کہ رو تابند از خوان محمدؐ
    ندانم ہیچ نفسے در دو عالم
    کہ دارد شوکت و شان محمدؐ
    خدازان سینہ بیزارست صدبار
    کہ ہست ازکینہ دارانِ محمدؐ
    خدا خود سوزد آن کرم دنی را
    کہ باشد از عدوّانِ محمدؐ
    اگر خواہی نجات از مستی نفس
    بیا در ذیل مستانِ محمدؐ
    اگر خواہی کہ حق گوید ثنایت
    بشو ازدل ثنا خوانِ محمدؐ
    اگر خواہی دلیلے عاشقش باش
    محمدؐ ہست ُ برہان محمدؐ
    سرے دارم فدائے خاک احمد
    دلم ہر وقت قربانِ محمدؐ
    بگیسوئے رسول اللہ کہ ہستم
    نثار روئے تابانِ محمدؐ
    دریں رہ گر کشندم ور بسوزند
    نتابم رو ز ایوانِ محمدؐ
    بکار دین نترسم از جہانے
    کہ دارم رنگ ایمان محمدؐ
    بسے سہل ست از دنیا بریدن
    بیادِ حُسن و احسانِ محمدؐ
    فدا شد در رہش ہر ذرۂ من
    کہ دیدم حسن پنہانِ محمدؐ
    دگر اُستاد را نامے ندانم
    کہ خواندم در دبستانِ محمدؐ
    بدیگر دلبرے کارے ندارم
    کہ ہستم کُشتۂ آنِ محمدؐ
    مرآں گوشۂ چشمے بباید
    نخواہم جز گلستان محمدؐ
    دلِ زارم بہ پہلوئم مجوئید
    کہ بستیمش بدامانِ محمدؐ
    من آں خوش مرغ از مرغان قدسم
    کہ دارد جا بہ بُستانِ محمدؐ
    تو جان ما منوّ ر کر دی ا زعشق
    فدایت جانم اے جانِ محمدؐ
    دریغا گردہم صد جان درین راہ
    نباشد نیز شایان محمدؐ
    چہ ہیبت ہا بداوند این جوان را
    کہ ناید کس بہ میدانِ محمدؐ
    الا اے دشمن نادان و بے راہ
    بترس از تیغ ُ برّان محمدؐ
    رہ مولیٰ کہُ گم کردند مردم
    بجو در آل و اعوان محمدؐ
    الا اے منکر از شان محمدؐ
    ہم از نور نمایانِ محمدؐ
    کرامت گرچہ بے نام و نشان است
    بیابنگر ز غلمانِ محمدؐ
    3
    لیکھرام پشاوری کی نسبت ایک پیشگوئی
    واضح ہو کہ اس عاجز نے اشتہار ۲۰؍ فروری ۱۸۸۶ ؁ء میں جو اس کتاب
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 650
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 650
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/650/mode/1up
    کےؔ ساتھ شامل کیا گیا تھا اندرمن مراد آبادی اور لیکھرام پشاوری کو اس بات کی دعوت کی تھی کہ اگر وہ خواہشمند ہوں تو ان کی قضا و قدر کی نسبت بعض پیشگوئیاں شائع کی جائیں۔ سو اس اشتہار کے بعد اندرمن نے تو اعراض کیا اور کچھ عرصہ کے بعد فوت ہوگیا۔ لیکن لیکھرام نے بڑی دلیری سے ایک کارڈ اس عاجز کی طرف روانہ کیا کہ میری نسبت جو پیشگوئی چاہو شائع کردو میری طرف سے اجازت ہے۔ سو اس کی نسبت جب توجہ کی گئی تو اللہ جلّ شانہٗ کی طرف سے یہ الہام ہوا :۔
    عجل جسد لہ خوار۔ لہ نصب و عذاب
    یعنے یہ صرف ایک بے جان گوسالہ ہے جس کے اندر سے ایک مکروہ آواز نکل رہی ہے۔ اور اس کے لئے ان گستاخیوں اور بد زبانیوں کے عوض میں سزا اور رنج اور عذاب مقدر ہے جو ضرور اس کو مل رہے گا۔ اور اس کے بعد آج جو ۲۰؍ فروری ۱۸۹۳ ؁ء روز دو شنبہ ہے اس عذاب کا وقت معلوم کرنے کے لئے توجہ کی گئی تو خداوند کریم نے مجھ پر ظاہر کیا کہ آج کی تاریخ سے جو بیس فروری ۱۸۹۳ ؁ء ہے۔ چھ برس کے عرصہ تک یہ شخض اپنی بدزبانیوں کی سزا میں یعنے ان بے ادبیوں کی سزا میں جو اس شخص نے رسول اللہ
    صلی اللہ علیہ وسلم کے حق میں کی ہیں عذاب شدید میں مبتلا ہو جائے گا۔ سو اب میں اس پیشگوئی کو شائع کر کے تمام مسلمانوں اور آریوں اور عیسائیوں اور دیگر فرقوں پر ظاہر کرتا ہوں کہ اگر اس شخص پر چھ برس کے عرصہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 651
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 651
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/651/mode/1up
    میںؔ آج کی تاریخ سے کوئی ایسا عذاب* نازل نہ ہوا جو معمولی تکلیفوں سے نرالا اور خارق عادت اور اپنے اندر الٰہی ہیبت رکھتا ہو تو سمجھو کہ میں خدا تعالیٰ کی طرف سے نہیں اور نہ اس کی روح سے میرا یہ نطق ہے اور اگر میں اس پیشگوئی میں کاذب نکلا تو ہر یک سزا کے بھگتنے کے لئے میں طیار ہوں اور اس بات پر راضی ہوں کہ مجھے گلہ میں رسہ ڈال کر کسی سولی پر کھینچا جائے اور باوجود میرے اس اقرار کے یہ بات بھی ظاہر ہے کہ کسی انسان کا اپنی پیشگوئی میں جھوٹا نکلنا خود تمام رسوائیوں سے بڑھ کر رسوائی ہے زیادہ اس سے کیا لکھوں۔ واضح رہے کہ اس شخص نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سخت بے ادبیاں کی ہیں جن کے تصور سے بھی بدن کانپتا ہے۔ اس کی کتابیں عجیب طور کی تحقیر اور توہین اور دشنام دہی سے بھری ہوئی ہیں کون مسلمان ہے جو ان کتابوں کو سنے اور اس کا دل اور جگر ٹکڑے ٹکڑے نہ ہو۔ با ایں ہمہ شوخی و خیرگی یہ شخص سخت جاہل ہے۔ عربی سے ذرّہ مس نہیں بلکہ دقیق اردو لکھنے کا بھی مادہ نہیں اور یہ پیشگوئی اتفاقی نہیں بلکہ اس عاجز نے خاص اسی مطلب کیلئے دعا کی جس کا یہ جواب ملا۔ اور یہ پیشگوئی مسلمانوں کیلئے بھی نشان ہے۔ کاش وہ حقیقت کو سمجھتے اور ان کے دل نرم ہوتے۔ اب میں اسی خدا عزّوجلّ کے نام پر ختم کرتا ہوں جس کے نام سے شروع کیا تھا۔
    والحمد للّٰہ والصّلٰوۃ والسلام علٰی رسولہ محمدن المصطفٰی افضل الرسل و خیر الورٰی سیدنا و سید کل ما فی الارض والسماء۔
    خاکسار مرزا غلام احمد از قادیان ضلع گورداسپورہ
    (۲۰ ؍فروری ۱۸۹۳ ؁ء)
    * اب آریوں کو چاہیئے کہ سب مل کر دعا کریں کہ یہ عذاب ان کے اس وکیل سے ٹل جائے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 652
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 652
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/652/mode/1up
    اشتہاؔ ر کتاب آئینہ کمالات اسلام
    یا ایھا الذین اٰمنوا ان تنصروا اللّٰہ ینصرکم
    اے ایماندارو اگر تم اللہ تعالیٰ کی مدد کرو تو وہ تمہاری مدد کرے گا۔
    اے عزیزان مدد دین متین آں کارے ست
    کہ بصد زہد میسّر نہ شود انسان را
    واضح ہو کہ یہ کتاب جس کا نام نامی عنوان میں درج ہے۔ ان دنوں میں اس عاجز نے اس غرض سے لکھی ہے کہ دنیا کے لوگوں کو قرآن کریم کے کمالات معلوم ہوں اور اسلام کی اعلیٰ تعلیم سے ان کو اطلاع ملے اور میں اس بات سے شرمندہ ہوں کہ میں نے یہ کہا کہ میں نے اس کو لکھا ہے کیونکہ میں دیکھتا ہوں کہ خدا تعالیٰ نے اول سے آخر تک اس کے لکھنے میں آپ مجھ کو عجیب در عجیب مددیں دی ہیں اور وہ عجیب لطائف و نکات اس میں بھر دئیے ہیں کہ جو انسان کی معمولی طاقتوں سے بہت بڑھ کر ہیں۔ میں جانتا ہوں کہ اس نے یہ اپنا ایک نشان دکھلایا ہے تاکہ معلوم ہو کہ وہ کیونکر اسلام کی غربت کے زمانہ میں اپنی خاص تائیدوں کے ساتھ اس کی حمایت کرتا ہے اور کیونکر ایک عاجز انسان کے دل پر تجلی کر کے لاکھوں آدمیوں کے منصوبوں کو خاک میں ملاتا اور ان کے حملوں کو پاش پاش کر کے دکھلا دیتا ہے۔ مجھے یہ بڑی خواہش ہے کہ مسلمانوں کی اولاد اور اسلام کے شرفاء کی ذرّیت جن کے سامنے نئے علوم کی لغزشیں دن بدن بڑھتی جاتی ہیں۔ اس کتاب کو دیکھیں۔ اگر مجھے وسعت ہوتی تو میں تمام جلدوں کو مفت ِ للہ تقسیم کرتا۔ عزیزو! یہ کتاب قدرت حق کا ایک نمونہ ہے اور انسان کی معمولی کوششیں خودبخود اس قدر ذخیرہ معارف کا پیدا نہیں کر سکتیں۔ اس کی ضخامت چھ سو صفحہ کے قریب ہے اور کاغذ عمدہ اور کتاب خوشخط اور قیمت د3و روپیہ اور محصول علاوہ ہے اور یہ صرف ایک حصہ ہے اور دوسرا حصہ الگ طبع ہوگا اور قیمت اس کی الگ ہوگی۔ اور اس میں علاوہ حقائق و معارف قرآنی اور لطائف کتاب ربِّ عزیز کے ایک وافر حصہ اُن پیشگوئیوں کا بھی موجود ہے جن کو اوّل سراج منیر میں شائع کرنے کا ارادہ تھا۔ اور میں اس بات پر راضی ہوں کہ اگر خریداران کتاب میری اس تعریف کو خلاف واقعہ پاویں تو کتاب مجھے واپس کر دیں میں بلاتوقف ان کی قیمت واپس بھیج دوں گا۔ لیکن یہ شرط ضروری ہے کہ کتاب کو دو ہفتے کے اندر واپس کریں اور دست مالیدہ اور داغی نہ ہو۔
    اخیر میں یہ بات بھی لکھنا چاہتا ہوں کہ اس کتاب کی تحریر کے وقت دو د فعہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت مجھ کو ہوئی اور آپ نے اس کتاب کی تالیف پر بہت مسرت ظاہر کی اور ایک رات یہ بھی دیکھا کہ ایک فرشتہ بلند آواز سے لوگوں کے دلوں کو اس کتاب کی طرف بلاتا ہے اور کہتا ہے ھذا کتاب مبارک فقوموا للاجلال والاکرام یعنے یہ کتاب مبارک ہے اس کی تعظیم کیلئے کھڑے ہو جاؤ۔ اب گذارش مدعا یہ ہے کہ جو صاحب اس کتاب کو خریدنا چاہیں وہ بلاتوقف مصمم ارادہ سے اطلاع بخشیں تاکہ کتاب بذریعہ ویلیو پی ایبل ان کی خدمت میں روانہ کی جائے۔
    والسلام علٰی من اتبع الھدٰی
    خاکسار غلام احمد از قادیان ضلع گورداسپورہ پنجاب
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 653
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 653
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/653/mode/1up
    شیخؔ مہر علی صاحب رئیس ہوشیار پور
    بسم اللّٰہ الرحمن الرحیم
    نحمدہ و نصلی
    تا دلِ مردِ خدا نامد بدرد
    ہیچ قومے را خدا رسوا نہ کرد
    (کلا ان الانسان لیطغی ان راہ استغنی)
    انسان باوجود سخت ناچیز اور مشت خاک ہونے کے پھر اپنی عاجزی کو کیسے جلد بھول جاتا ہے ایک ذرہ درد فرو ہونے اور آرام کی کروٹ بدلنے سے اپنی فروتنی کا لہجہ فی الفور بدل لیتا ہے پنجاب کے قریباً تمام آدمی شیخ مہر علی صاحب رئیس ہوشیارپور سے واقف ہوں گے اور میرے خیال میں ہے کہ جس ایک بیجا الزام میں اپنے بعض پنہانی قصوروں کی وجہ سے جن کو خدا تعالیٰ جانتا ہوگا وہ پھنس گئے تھے۔ وہ قصہ ہمارے ملک کے بچوں اور عورتوں کو بھی معلوم ہوگا ۔ سو اس وقت ہمیں اس منسوخ شدہ قصہ سے تو کچھ مطلب نہیں صرف اس بات کا ظاہر کرنا مطلوب ہے کہ اس قصہ سے تخمیناً چھ ماہ پہلے اس عاجز کو بذریعہ ایک خواب کے جتلایا گیا تھا کہ شیخ صاحب کی جائے نشست فرش کو آگ لگی ہوئی ہے اور اس آگ کو اس عاجز نے بار بار پانی ڈال کر بجھایا ہے سو اُسی وقت میرے دل میں خدا تعالیٰ کی طرف سے بہ یقین کامل یہ تعبیر ڈالی گئی کہ شیخ صاحب پر اور ان کی عزت پر سخت مصیبت آئے گی اور میرا پانی ڈالنا یہ ہوگا کہ آخر میری ہی دعا سے نہ کسی اور وجہ سے وہ بلا دور کی جائے گی اور میں نے اس خواب کے بعد شیخ صاحب کو بذریعہ ایک مفصل خط کے اپنے خواب سے اطلاع دیدی اور توبہ اور استغفار کی طرف توجہ دلائی مگر اس خط کا جواب انہوں نے کچھ نہ لکھا آخر قریباً چھ ماہ گذرنے پر ایسا ہی ہوا اور میں انبالہ چھاؤنی میں تھا کہ ایک شخص محمد بخش نام شیخ صاحب کے فرزند جان محمد کی طرف سے میرے پاس پہنچا اور بیان کیا کہ فلاں مقدمہ میں شیخ صاحب حوالات میں ہوگئے میں نے اس شخص سے اپنے خط کا حالؔ دریافت کیا جس میں چھ ماہ پہلے اس بلا کی اطلاع دی گئی تھی تو اس وقت محمد بخش نے اس خط کے پہنچنے سے لا علمی ظاہر کی لیکن آخر خود شیخ صاحب نے رہائی کے بعد کئی دفعہ اقرار کیا کہ وہ خط ایک صندوق
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 654
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 654
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/654/mode/1up
    میں سے مل گیا۔ پھر شیخ صاحب تو حوالات میں ہو چکے تھے لیکن ان کے بیٹے جان محمد کی طرف سے شاید محمد بخش کے دستخط سے جو ایک شخص ان کے تعلق داروں میں سے ہے کئی خط اس عاجز کے نام دعا کیلئے آئے اور اللہ جلّ شانہٗ جانتا ہے کہ کئی راتیں نہایت مجاہدہ سے دعائیں کی گئیں اور اوائل میں صورت قضا و قدر کی نہایت پیچیدہ اور مبرم معلوم ہوتی تھی لیکن آخر اللہ تعالیٰ نے دعا قبول کی اور ان کے بارے میں رہا ہونے کی بشارت دیدی اور اس بشارت سے ان کے بیٹے کو مختصر لفظوں میں اطلاع دی گئی۔
    یہ تو اصل حقیقت اور اصل واقعہ ہے لیکن پھر اس کے بعد سنا گیا کہ شیخ صاحب اس رہائی کے خط سے انکار کرتے ہیں جس سے لوگ یہ نتیجہ نکالتے ہیں کہ گویا اس عاجز نے جھوٹ بولا۔ سو اس فتنہ کے دور کرنے کی غرض سے اس عاجز نے شیخ صاحب سے اپنا خط طلب کیا جس میں ان کی بریت کی خبر دی گئی تھی مگر انہوں نے وہ خط نہ بھیجا بلکہ اپنے خط ۱۹؍ جون ۱۸۹۲ ؁ء میں میرے خط کا گم ہو جانا ظاہر کیا۔ لیکن ساتھ ہی اپنے بیٹے جان محمد کی زبانی یہ لکھا کہ قطعیت بریت کا خبر دینا ہمیں یاد نہیں مگر غالباً خط کے یہ الفاظ یا اس کے قریب قریب تھے کہ فضل ہو جائے گا دعا کی جاتی ہے۔ *یہ قصہ تو یہاں تک رہا اور وہ خط شیخ صاحب کا میرے پاس موجود پڑا ہے لیکن اب بعض دوستوں کے خطوط اور بیانات سے معلوم ہوا کہ شیخ صاحب یہ مشہور کرتے پھرتے ہیں کہ ہمیں رہائی کی کوئی بھی اطلاع نہیں دی تھی۔ اور نہ صرف اسی قدر بلکہ اس عاجز پر ایک اور طوفان باندھتے ہیں اور وہ یہ کہ گویا یہ عاجز یہ تو جانتا تھا کہ میں نے کوئی خط نہیں لکھا مگر شیخ صاحب کو جھوٹ بولنے کے لئے تحریک دے کر بطور بیان دروغ ان سے یہ لکھوانا چاہا کہ اس عاجز نے رہائی کی خبر دے دی تھی گویا اس عاجز نے کسی خط میں شیخ صاحب کی خدمت میں یہ لکھا ہے کہ اگرچہ یہ بات صحیح اور واقعی تو نہیں کہ میں نے رہائی کی اطلاع قبل از وقت بطور پیشگوئی دی ہو مگر میری خاطر اور میرے لحاظ سے تم ایسا ہی لکھ دو تا میری کرامت ظاہر ہوؔ ۔ شیخ صاحب کا یہ طریق عمل سن کر سخت افسوس ہوا۔ انّا للّٰہ و انّا الیہ راجعون۔ خدا تعالیٰ جانتا ہے کہ شیخ صاحب کے اول و آخر کے متعلق ضرور شیخ صاحب کو اطلاع دی گئی تھی اور وہ دونوں پیشگوئیاں صحیح ہیں اور دونوں کی نسبت شیخ
    یہ اس عاجز کا لفظ نہیں ہے کہ دعا کی جاتی ہے بلکہ یہ تھا کہ دعا بہت کی گئی۔ اور آخر فقرہ میں بریت اور فضل الٰہی کی بشارت دی گئی تھی وہ الفاظ اگرچہ کم تھے مگر قلّ و دلّ تھے۔ خدا تعالیٰ کسی کا محتاج اور خوشامد گر لوگوں کی طرح نہیں اس کی بشارتیں اکثر اشارات ہی ہوتے ہیں اس کا ہاں یا نہیں کہنا دوسرے لوگوں کے ہزار دفتر سے زیادہ معتبر ہے مگر نادان اور متکبر دنیا دار یہ چاہتے ہیں کہ خدا تعالیٰ بھی فرمانبرداروں کی طرح لمبی تقریریں کرے تا ان کو یقین آوے اور پھر اس بات کو قطعی سمجھیں۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 655
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 655
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/655/mode/1up
    صاحب کی طرف خط بھیجا گیا اور وہی خط مانگا گیا تھا یا اس کا مضمون طلب کیا گیا تھا۔ شیخ صاحب نے اگر درحقیقت ایسا ہی بیان کیا ہے تو ان کے افترا کا جواب کیا دیا جائے ناظرین اس بارے میں میرے خطوط ان سے طلب کریں اور ان کو باہم ملا کر غور سے پڑھیں۔ * اگر شیخ صاحب میں مادہ فہم کا ہوتا تو پہلی ہی پیشگوئی کے خط سے میرا بریت کا خبر دینا سمجھ سکتے تھے کیونکہ اس سے یہی بہ بداہت سمجھا جا سکتا تھا کہ اس عاجز کے ذریعہ سے ہی ان کی بند خلاص ہوگی وجہ یہ کہ ان کو اطلاع دی گئی تھی کہ میں نے ہی پانی ڈال کر آگ کو بجھایا۔ کیا شیخ صاحب کو یاد نہیں کہ بمقام لودہیانہ جب وہ میرے مکان پر دعوت کھانے آئے تھے تو انہوں نے اس خط کو یاد کر کے رونا شروع کر دیا تھا اور شاید روٹی پر بھی بعض قطرے آنسوؤں کے پڑے ہوں۔ پھر وہ آگ پر پانی ڈالنا کیوں یاد نہ رہا۔ اور اگر میں نے رہائی کی خبر شائع نہیں کی تھی تو پھر وہ صد ہا آدمیوں میں قبل از رہائی مشہور کیونکر ہوگئی تھی اور کیوں آپ کے بعض رشتہ دار جلدی ** کر کے اس خبر کے صدق پر اعتراض کرتے تھے جو اب تک زندہ موجود ہیں اور پھر آپ نے کیوں میرے خط کا یہ خلاصہ مجھ کو تحریر کیا کہ گویا میں نے خط میں صرف اتنا ہی لکھا تھا کہ فضل ہو جائے گا یہ کیسی ناخدا ترسی ہے کہ مجالس میں افترا کی تہمت لگا کر دل کو دکھایا جائے۔ خیر اب ہم بطریق تنزل ایک آسان فیصلہ اپنے صدق اور کذب کے بارے میں ذیل میں لکھتے ہیں اور وہ یہ ہے :۔
    فیصلہ
    آج رات میں نے جو ۲۵؍ فروری ۱۸۹۳ ؁ء کی رات تھی۔ شیخ صاحب کی ان باتوں سے سخت دردمند ہو کر آسمانی فیصلہ کیلئے دعا کی۔ خواب میں مجھ کو دکھلایا گیا کہ ایک دوکاندار کی طرف میں نے کسی قدر قیمت بھیجی تھی کہ وہ ایک عمدہ اور خوشبودار چیز بھیج دے اس نے قیمت رکھ کر ایک بدبودار چیز بھیج دی وہ چیز دیکھ کر مجھے غصہ آیا اور میں نے کہا کہ جاؤ دوکاندار کو کہو کہ وہی چیز دے ورنہ میں اس دغا کی اس پر نالش کروں گا اور پھر عدالت سے کم سے کم چھ ماہ کی اس کو سزا ملے گی اور امید تو زیادہ کی ہے۔ تب دوکاندار نے شاید یہ کہلا بھیجا کہ یہ
    * مناسب ہے کہ ناظرین ان قریب قریب تاریخوں کے تمام میرے خطوط کو شیخ صاحب سے لیکر پڑھیں میرے کسی خط کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ شیخ صاحب کوئی بات خلاف واقعہ لکھیں بلکہ ان کو اپنے خط سابق کے مضمون سے اطلاع دی گئی تھی اور امید تھی کہ یاد دلانے سے وہ مضمون انہیں یاد آجائے گا۔ اس بناء پر ان سے یہ درخواست کی گئی تھی کہ ہمارے خط کا یہ خلاصہ ہے اور اس کی ہم آپ سے تصدیق چاہتے ہیں مگر افسوس کہ شیخ صاحب نے میرے خط کو تو تحکم کی راہ سے دبا لیا اور مجھ پر یہ افترا کیا کہ میں نے ان سے جھوٹ کہلوانا چاہا۔ خدا تعالیٰ جانتا ہے کہ میں نے تو صرف اپنے خط کے مضمون کی تصدیق کرانی چاہی تھی۔ اگر میں سچ پر نہیں تو شیخ صاحب میرا متنازعہ فیہ خط پیش کریں جس کے پہنچنے کا ان کو اقرار ہے اور نہ صرف اسی قدر بلکہ یہ بھی اقرار ہے کہ اس میں لکھا تھا کہ فضل ہو جائے گا۔ منہ
    * * آپ کے رشتہ دار شاید ہمشیرہ زاد شیخ میراں بخش ساکن دسوہہ نے بمقام امرتسر اپنی دوکان پر روبرو شیخ سندھی خان ساکن خانپور میرے ملازم شیخ حامد علی سے نومیدی رہائی کی حالت میں تکرار کی تھی کہ مرزا غلام احمد تو کہتے تھے کہ شیخ صاحب بری ہو جائیں گے اور اب وہ پھانسی ملنے لگے ہیں۔ حامد علی کا بیان ہے کہ میں نے کہا تھا کہ انجام دیکھنے کے بعد اعتراض کرنا۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 656
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 656
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/656/mode/1up
    میرؔ ا کام نہیں یا میرا اختیار نہیں اور ساتھ ہی یہ کہلا بھیجا کہ ایک سودائی پھرتا ہے اس کا اثر میرے دل پر پڑ گیا اور میں بھول گیا اور اب وہی چیز دینے کو تیار ہوں- اس کی میں نے یہ تعبیر کی کہ شیخ صاحب پر یہ ندامت آنے والی ہے اور انجام کار وہ نادم ہوں گے اور ابھی کسی دوسرے آدمی کا ان کے دل پر اثر ہے۔ پھر میں نے توجہ کی تو مجھے یہ الہام ہوا :۔
    انا نرٰی تقلّب وجھک فی السماء نقلّب فی السماء ما قلّبتَ فی الارض انا معک نرفعک د رجات۔ یعنے ہم آسمان پر دیکھ رہے ہیں کہ تیرا دل مہر علی کی خیر اندیشی سے بد دعا کی طرف پھر گیا سو ہم بات کو اسی طرح آسمان پر پھیر دیں گے جس طرح تو زمین پر پھیرے گا۔ ہم تیرے ساتھ ہیں تیرے درجات بڑھائیں گے۔ لہٰذا یہ اشتہار شیخ صاحب کی خدمت میں رجسٹری کرا کر بھیجتا ہوں کہ اگر وہ ایک ہفتہ کے عرصہ میں اپنے خلاف واقعہ فتنہ اندازی سے معافی چاہنے کی غرض سے ایک خط بہ نیت چھپوانے کے نہ بھیج دیں تو پھر آسمان پر میرا اور ان کا مقدمہ دائر ہوگا اور میں اپنی دعاؤں کو جو ان کی عمر اور بحالی عزت اور آرام کیلئے تھیں واپس لے لوں گا یہ مجھے اللہجلّ شانہٗ کی طرف سے بتصریح بشارت مل گئی ہے پس اگر شیخ صاحب نے اپنے افتراؤں کی نسبت میری معرفت معافی کا مضمون شائع نہ کرایا تو پھر میرے صدق اور راستی کی یہ نشانی ہے کہ میری بد دعا کا اثر ان پر ظاہر ہوگا جیسا کہ خدا تعالیٰ نے مجھ کو وعدہ دیا ہے۔ ابھی میں اس کی کوئی تاریخ بیان نہیں کر سکتا کیونکہ ابھی خدا تعالیٰ نے کوئی تاریخ میرے پر کھولی نہیں اور اگر میری بددعا کا کچھ بھی اثر نہ ہوا تو بلاشبہ میں اسی طرح کاذب اور مفتری ہوں جو شیخ صاحب نے مجھ کو سمجھ لیا۔ میں اللہجلّ شانہٗ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ میں نے مصیبت سے پہلے ہی شیخ صاحب کو خبر دی تھی اور مصیبت کے بعد بھی۔ اور اگر میں جھوٹا ہوں تو شیخ صاحب میری بد دعا سے صاف بچ جائیں گے اور یہی میرے کاذب ہونے کی کافی نشانی ہوگی۔ اگر یہ بات صرف میری ذات تک محدود ہوتی تو میں صبر کرتا۔ لیکن اس کا دین پر اثر ہے اور عوام میں ضلالت پھیلتی ہے اس لئے میں نے محض حمایت دین کی غرض سے دعا کی اور خدا تعالیٰ نے میری دعا منظور فرمائی۔ دنیا داروں کو اپنی دنیا کا تکبر ہوتا ہے اور فقیروں میں کبریائی تکبر اپنے نفس پر بھروسہ کر کے پیدا ہوتا ہے اور کبریائی خدا تعالیٰ پر بھروسہ کر کے پیدا ہوتی ہے۔ پس میرے صادق اور کاذب ہونے کیلئے یہ بھی ایک نشانی ہے۔ میرا یہ دعویٰ ہے کہ شیخ صاحب کی نجات صرف میری ہی دعا سے ہوئی تھی جیسا کہ میں نے آگ پر پانی ڈالا تھا۔ اگر میں اس دعویٰ میں صادق نہیں ہوں تو میری ذلت ظاہر ہو جاوے گی۔ والسلام علی من اتبع الھدٰی
    راقم خاکسار غلام احمد از قادیان ضلع گورداسپورہ۔
    (مطبوعہ ریاض ہند قادیان )
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 657
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 657
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/657/mode/1up
    بسم اللّٰہ الرحمٰن الرحیم
    اللّٰھم صل علی محمد و اٰل محمد افضل الرسل و خاتم النبیین
    اشتہار
    کتاب براہین احمدیہ جس کو خدا تعالیٰ کی طرف سے مؤلف نے ملہم و مامور ہو کر بغرض اصلاح و تجدید دین تالیف کیا ہے جس کے ساتھ دس ہزار روپیہ کا اشتہار ہے جس کا خلاصہ مطلب یہ ہے کہ دنیا میں منجانب اللہ اور سچا مذہب جس کے ذریعہ سے انسان خدا تعالیٰ کو ہر یک عیب اور نقص سے بری سمجھ کر اس کی تمام پاک اور کامل صفتوں پر دلی یقین سے ایمان لاتا ہے وہ فقط اسلام ہے جس میں سچائی کی برکتیں آفتاب کی طرح چمک رہی ہیں اور صداقت کی روشنی دن کی طرح ظاہر ہو رہی ہے اور دوسرے تمام مذاہب ایسے بدیہی البطلان ہیں کہ نہ عقلی تحقیقات سے ان کے اصول صحیح اور درست ثابت ہوتے ہیں اور نہ ان پر چلنے سے ایک ذرہ روحانی برکت و قبولیت الٰہی مل سکتی ہے بلکہ ان کی پابندی سے انسان نہایت درجہ کا کور باطن اور سیاہ دل ہو جاتا ہے جس کی شقاوت پر اسی جہان میں نشانیاں پیدا ہو جاتی ہیں۔
    اس کتاب میں دین اسلام کی سچائی کو دو طرح پر ثابت کیا گیا ہے (۱) اول تین سو مضبوط اور قوی دلائل عقلیہ سے جن کی شان و شوکت و قدر و منزلت اس سے ظاہر ہے کہ اگر کوئی مخالف اسلام ان دلائل کو توڑ دے تو اس کو دس ہزار روپیہ دینے کا اشتہار دیا ہوا ہے اگر کوئی چاہے تو اپنی تسلی کے لئے عدالت میں رجسٹری بھی کرالے۔ (۲) دوم ان آسمانی نشانوں سے کہ جو سچے دین کی کامل سچائی ثابت ہونے کے لئے ازبس ضروری ہیں۔ اس امر دوم میں مولف نے اس غرض سے کہ سچائی دین اسلام کی آفتاب کی طرح روشن ہو جائے تین قسم کے نشان ثابت کر کے دکھائے ہیں۔ اول۱ وہ نشان کہ جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں مخالفین نے خود حضرت ممدوح کے ہاتھ سے اور آنجناب کی دعا اور توجہ اور برکت سے ظاہر ہوتے دیکھے جن کو مولف یعنی اس خاکسار نے تاریخی طور پر ایک اعلیٰ درجہ کے ثبوت سے مخصوص و ممتاز کر کے درج کتاب کیا ہے۔ دوم۲ وہ نشان کہ جو خود قرآن شریف کی ذات بابرکات میں دائمی اور ابدی اور بے مثل طور پر پائی جاتی ہیں جن کو راقم نے بیان شافی اور کافی سے ہر یک عام و خاص پر کھول دیا ہے اور کسی نوع کا عذر کسی کے لئے باقی نہیں رکھا۔ سوم وہ نشان کہ جو کتاب اللہ کی پیروی اور متابعت رسول برحق سے کسی شخص تابع کو بطور وراثت ملتے ہیں جن کے اثبات میں اس بندہ درگاہ نے بفضل خداوند حضرت قادر مطلق یہ بدیہی ثبوت دکھلایا ہے کہ بہت سے سچے الہامات اور خوارق اور کرامات اور اخبار غیبیہ اور اسرار لدنیہ اور کشوف صادقہ اور دعائیں قبول شدہ کہ جو خود اس خادم دین سے صادر ہوئے ہیں اور جن کی صداقت پر بہت سے مخالفین مذہب (آریوں وغیرہ سے) بشہادت و رؤیت گواہ ہیں کتاب موصوف میں درج کئے ہیں اور مصنف کو اس بات کا بھی علم دیا گیا ہے کہ وہ مجدد وقت ہے اور روحانی طور پر اس کے کمالات مسیح بن مریم کے کمالات سے مشابہ ہیں اور ایک کو دوسرے سے بشدت مناسبت و مشابہت ہے اور اس کو خواص انبیاء و رسل کے نمونہ پر محض بہ برکت متابعت حضرت خیر البشر افضل الرسل صلی اللہ علیہ وسلم ان بہتوں پر اکابر اولیاء سے فضیلت دی گئی ہے کہ جو اس سے پہلے گذر چکے ہیں اور اس کے قدم پر چلنا موجب نجات و سعادت و برکت اور اس کے برخلاف چلنا موجب بعد و حرمان ہے یہ سب ثبوت کتاب براہین احمدیہ کے پڑھنے سے کہ جو منجملہ تین سو جزو کے قریب ۳۷ جزو کے چھپ چکی ہے ظاہر ہوتے ہیں اور طالب حق کے لئے خود مصنف پوری پوری تسلی و تشفی کرنے کو ہر وقت مستعد اور حاضر ہے۔ و ذٰلک فضل اللّٰہ یؤتیہ من یشاء ولا فخر۔ والسلام علٰی من اتبع الھدٰی اور اگر اس اشتہار کے بعد بھی کوئی شخص سچا طالب بن کر اپنی عقدہ کشائی نہ چاہے اور دلی صدق سے حاضر نہ ہو تو ہماری طرف سے اس پر اتمام حجت ہے جس کا خدا تعالیٰ کے روبرو اس کو جواب دینا پڑے گا۔ بالآخر اس اشتہار کو اس دعا پر ختم کیا جاتا ہے کہ اے خداوند کریم تمام قوموں کے مستعد دلوں کو ہدایت بخش کہ تا تیرے رسول مقبول ا فضل الرسل محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم اور تیرے کامل و مقدس کلام قرآن شریف پر ایمان لاویں اور اس کے حکموں پر چلیں تا ان تمام برکتوں اور سعادتوں اور حقیقی خوشحالیوں سے متمتع ہو جاویں کہ جو سچے مسلمان کو دونوں جہانوں میں ملتی ہیں اور اس جاودانی نجات اور حیات سے بہرہ ور ہوں کہ جو نہ صرف عقبیٰ میں حاصل ہو سکتی ہے بلکہ سچے راستباز اسی دنیا میں اس کو پاتے ہیں بالخصوص تمام انگریز جنہوں نے ابھی تک اس آفتاب صداقت سے کچھ روشی حاصل نہیں کی اور جن کی شائستہ اور مہذب اور با رحم گورنمنٹ نے ہم کو اپنے احسانات اور دوستانہ معاملات سے ممنون کر کے اس بات کے لئے دلی جوش بخشا ہے کہ ہم ان کے دنیا و دین کے لئے دلی جوش سے بہبودی و سلامتی چاہیں تا ان کے گورے و سپید منہ جس طرح دنیا میں خوبصورت ہیں آخرت میں بھی نورانی و منور ہوں۔ فنسئل اللّٰہ تعالی خیرھم فی الدنیا واآاخرۃ اللّٰھم اھدھم و
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 658
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 658
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/658/mode/1up
    ایّدھم بروح منک واجعل لھم حظًا کثیرًا فی دینک واجذبھم بحولک و قوّتک لیؤمنوا بکتابک و رسولک و یدخلوا فی دین اللّٰہ افواجًا۔ آمین ثم آمین والحمد للّٰہ ربّ العالمین۔
    المشتھر
    خاکسار مرزا غلام احمد از قادیان ضلع گورداسپورہ ملک پنجاب (بیس ہزار اشتہار چھاپے گئے)
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 659
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 659
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/659/mode/1up
    a higher rank than that of other Prophets, I also by virtue of being a follower of the August Person (the benefactor of mankind, the best of the messangers of God) am favoured with a higher rank than, that assigned to many of the Saints and Holy Personages preceding me. To follow my footsteps will be a blessing and the means of salvation whereas any antogonism to me will result in estrangemen and disappointment. All these evidences will be found by perusal of the book which will consist of nearly 4800 pages of which about 592 pages have been published. I am always ready to satisfy and convince any seeker of truth. "All this is a Grace of God He gives it to whom-soever. He likes and there is no bragging in this." "Peace be to all the followers of righteousness!"
    If after the publication of this notice any one does not take the trouble of becoming earnest enquirer after the truth and does not come forward with an unbiassed mind to seek it then my challenging (discussion) with him ends here and he shall be answerable to God.
    Now I conclude this notice with the following prayer: Oh Gracious God! guide the pliable hearts of all the nations, so that they may have faith on Thy chosen Prophet (Muhammad) and on Thy holy Al-Quran, and that they may follow the commandments contained therein, so that they may thus be benifitted by the peace and the true happiness which are specially enjoyed by the true Muslims in both the worlds, and may obtain absolution and eternal life which is not only procurable in the next world, but is also enjoyed by the truthful and honest people even in this world. Expecially the English nation who have not as yet availed themselves of the sunshine of truth, and whose civilized, prudent and merciful empire has, by obliging us numerous acts of kindness and friendly treatments, exceedingly encouraged us to try our utmost for their numerous acts of welfare, so that their fair faces may shine with heavenly effulgence in the next We beseech God for their well being in this world and the next. Oh God! guide them and help them with Thy grace, and instil in their minds the love for Thy religion, and attract them with Thy power, so that they may have faith on Thy Book and prophet, and embrace Thy religion in groups Amen! Amen!"
    "Praise be to God the supporter of creation!"
    (Sd) MIRZA GULAM AHMAD
    Chief of Qadian, District Gurdaspur, Punjab, India
    Ruhani Khazain Volume 5. Page: 660
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۵- آئینہ کمالات اسلام: صفحہ 660
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=5#page/660/mode/1up
    TRANSLATION OF THE VERNACULAR NOTICE ON REVERSE
    Being inspired and commanded by God, I have undertaken the compilation of a book named 'Barahin-i-Ahmadia,' with the object of reforming and reviewing the religion, and have offered a reward of Rs. 10,000 to any one who would prove the arguments brought forward therein to be false. My object in this Book is to show that only true and the only revealed religion by means of which one might know God to be free from blemish, and obtain a strong conviction as to the perfection of His attributes is the religion of Islam, in which the blessings of truth shine forth like sun, and the impress of veracity is as vividly bright as the day-light. All other religions are so palpably and manifestly false that neither their principles can stand the test of reasoning nor their followers experience least spiritual edification. On the contrary those religions so obscure the mind and divest it of discernment that signs of future misery among the followers become apparent even in this world.
    That the Muhammadan religion is the only true religion has been shown in this book in two ways: (1st), By means of 300 very strong and sound arguments based on mental reasoning (their congency and sublimity being inferred from the fact that a reward of Rs. 10,000 has been offered by me to any one refuting them, and from my further readiness to have this offer registered for the satisfaction of any one who might ask for it): (2) From those Divine signs which are essential for the complete and satisfactory proof of a true religion. With a view to establish that Muhammadan religion is the only true religion in the world, I have adduced under this latter head 3 kinds of evidences: (1) The miracles performed by the Prophet during his life time either by deeds or words which were witnessed by people of other persuasions and are inserted in this book in a chronological order (based on the best kind of evidences): (2), The marks which are inseparably adherent in the Al-Quran itself, and are perpetual and everlasting, the nature of which has been fully expounded for facility of comprehension (3), The signs which by way of inheritances devolve on any believer in the Book of God and the follower of the true Prophet. As an illustration of this, I, the humble creature of God, by His help have clearly evinced myself to be possessed of such virtues by the achieving of many unusual and supernatural deeds by foretelling future events and secrets, and by obtaining from God the objects of my prayers to all of which many persons of different persuasions like Aryas, & c., have been eye-witness ( A full description of these will be found in the said book).
    I am also inspired that I am the Reformer of my time, and that as regards spiritual excellence, my virtues bear a very close similarity and strict analogy to those of Jesus Christ, in the same way as the distinguished chief of Prophets were assigned
     

اس صفحے کو مشتہر کریں