1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 3 ۔ازالہ اوہام ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جولائی 17, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    روحانی خزائن جلد 3 ۔ ازالہء اوہام ۔ یونی کوڈ

    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 101
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 101
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 102
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 102
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    اے شک کرنے والو!
    آسمانی فیصلہ کی طرف آجاؤ
    اے بزرگو! اے مولویو! اے قوم کے منتخب لوگو! خدا تعالیٰ آپ لوگوں کی آنکھیں کھولے غیظ اور غضب میں آکرحد سے مت بڑھو۔میری اس کتاب کے دونوں حِصّوں کو غور سے پڑھو کہ ان میں نور اور ہدایت ہے۔خدائے تعالیٰ سے ڈرو اور اپنی زبانوں کوتکفیر سے تھام لو۔ خدائے تعالیٰ خوب جانتا ہے کہ میں ایک مسلمان ہوں۔اٰمَنْتُ بِاللّٰہِ و ملٰئکتِہٖ و کُتُبہٖ ورُسُلِہٖ والبعث بعدالموت واشھد ان لَّااِلٰہَ اِلَّااللّٰہُ وَحْدَہٗ لَا شریک لہ واشھد ان محمّدًاعبدہٗ ورسولہ فاتقوا اللہ ولا تقولوا لست مُسلما واتقواالملک الذی الیہ ترجعون۔
    اور اگر اب بھی اس کتاب کے پڑھنے کے بعد شک ہے تو آؤآزمالو خداکس کے ساتھ ہے۔ اے میرے مخالف الرائے مولویواور صوفیو!اور سجادہ نشینو!!! جو مُکَفِّر اور مُکَذِّب ہو مجھے یقین دلایا گیا ہے کہ اگر آپ لوگ مل جل کر یا ایک ایک آپ میں سے اُن آسمانی نشانوں میں میرا مقابلہ کرنا چاہیں جو ؔ اولیاء الرحمٰن کے لازم حال ہوا کرتے ہیں تو خدائے تعالیٰ تمہیں شرمندہ کرے گااور تمہارے پردوں کو پھاڑ دے گا اور اس وقت تم دیکھو گے کہ وہ میرے ساتھ ہے۔ کیا کوئی تم میں ہے؟ کہ اس آز مائش کے لئے میدان میں آوے اور عام اعلان اخباروں کے ذریعہ سے دے کر ان تعلقات قبولیت میں جو میرا رب میرے ساتھ رکھتا ہے اپنے تعلقات کا موازنہ کرے یاد رکھو کہ خداصادقوں کا مددگار ہے وہ اسی کی مدد کرے گا جس کو وہ سچا جانتا ہے چالاکیوں سے باز آجاؤکہ وہ نزدیک ہے۔ کیا تم اس سے لڑو گے؟ کیا کوئی متکبرانہ اچھلنے سے درحقیقت اونچا ہو سکتا ہے کیا صرف زبان کی تیزیوں سے سچائی کو کاٹ دو گے اس ذات سے ڈرو جس کا غضب سب غضبوں سے بڑھ کر ہے
    اِنَّهٗ مَنْ يَّاْتِ رَبَّهٗ مُجْرِمًا فَاِنَّ لَهٗ جَهَـنَّمَۚ لَا يَمُوْتُ فِيْهَا وَ لَا يَحْيٰى‏ ۱؂
    النَّاصح
    خاکسار غلام احمدقادیانی ازلودیانہ محلہ اقبال گنج
    ۷۵: طٰہٰ: ۱؂
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 103
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 103
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    بِسْمِ ؔ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
    اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ والسلام علٰی قومٍ موجع سیما علٰی امام الاَصفیَاء وسیّد الانبیاء محمد ن المصطفیٰ واٰلہٖ واصحابہٖ اجمعین۔اللّٰھم ارزقنا انوار اتباعہ واعطنا
    ضوء ہ بجمیع انواعہٖ برحمتک علیہ واشیاعہٖ
    اس سوال کا جواب کہ حضرت مسیح بن مریم نے مُردوں کوزندہ کیا اور اندھوں کو آنکھیں بخشیں بہروں کے کان کھولے ان تمام معجزات میں سے مثیل مسیح نے کیا دکھایا
    اس جگہ اول تو یہ جواب کافی ہے کہ جس مسیح کے مسلمان لوگ منتظر ہیں اس کی نسبت ہرگز احادیث میں یہ نہیں لکھا کہ اس کے ہاتھ سے مردے زندہ ہوں گے بلکہ یہ لکھا ہے کہ اس کے دم سے زندے مریں گے۔علاوہ اس کے خدائے تعالیٰ نے اسی غرض سےؔ اِس عاجز کو بھیجا ہے کہ تاروحانی طور پر مردے زندہ کئے جائیں بہروں کے کان کھولے جائیں اور مجذوموں کوصاف کیا جائے اور وہ جو قبروں میں ہیں باہر نکالے جائیں اور نیز یہ بھی وجہ مماثلت ہے کہ جیسے مسیح بن مریم نے انجیل میں توریت کا صحیح خلاصہ اور مغز اصلی پیش کیا تھا اسی کام کے لئے یہ عاجز مامور ہے تاغافلوں کے سمجھانے کے لئے قرآن شریف کی اصلی تعلیم پیش کی جائے مسیح صرف اسی کام کے لئے آیا تھاکہ توریت کے احکام شدّومد کے ساتھ ظاہر کرے ایسا ہی یہ عاجز بھی اسی کام کے لئے بھیجا گیا ہے کہ تاقرآن شریف کے احکام بہ وضاحت بیان کر دیوے فرق صرف اتنا ہے کہ وہ مسیح موسیٰ کو دیا گیا تھا اور یہ مسیح مثیل موسیٰ کو عطاکیا گیا سو یہ تمام مشابہت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 104
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 104
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    توثابت ہے اور میں سچ سچ کہتا ہوں کہ مسیح کے ہاتھ سے زندہ ہونے والے مر گئے مگر جو شخص میرے ہاتھ سے جام پیئے گا جو مجھے دیا گیا ہے وہ ہرگز نہیں مرے گا۔وہ زندگی بخش باتیں جومیں کہتا ہوں اور وہ حکمت جو میرے منہ سے نکلتیؔ ہے اگر کوئی اور بھی اس کی مانند کہہ سکتا ہے تو سمجھو کہ میں خدائے تعالیٰ کی طرف سے نہیں آیا لیکن اگر یہ حکمت اور معرفت جو مُردہ دلوں کے لئے آب حیات کا حکم رکھتی ہے دوسری جگہ سے نہیں مل سکتی توتمہارے پاس اس جُرم کا کوئی عذر نہیں کہ تم نے اُس کے سرچشمہ سے انکار کیا جو آسمان پر کھولا گیا زمین پر اس کو کوئی بند نہیں کر سکتا سو تم مقابلہ کے لئے جلدی نہ کرو اور دیدہ و دانستہ اس الزام کے نیچے اپنے تئیں داخل نہ کرو جو خدائے تعالیٰ فرماتاہے
    ۱؂ وَلَا تَقْفُ مَا لَـيْسَ لَـكَ بِهٖ عِلْمٌؕ اِنَّ السَّمْعَ وَالْبَصَرَ وَالْفُؤَادَ كُلُّ اُولٰۤٮِٕكَ كَانَ عَنْهُ مَسْـُٔوْلاً‏
    بدظنی اور بدگمانی میں حد سے زیادہ مت بڑھو ایسانہ ہو کہ تم اپنی باتوں سے پکڑے جاؤ اور پھر اس دکھ کے مقام میں تمہیں یہ کہنا پڑے کہ
    مَا لَنَا لَا نَرٰى رِجَالاً كُنَّا نَعُدُّهُمْ مِّنَ الْاَشْرَارِ ۲؂
    آں نہ دانائی بود کز نا شکیبائی نفس
    خویشتن را زود تر بر ضد و انکار آورد
    صبر بائد طالب حق را کہ تخم اندر جہاں
    ہر چہ پنہاں خاصیت دار دہماں بار آورد
    اند کے نور فراستؔ باید ایں جامردرا
    تا صداقت خویشتن راخود باظہار آورد
    صادقاں را صدق پنہانی نمے ماند نہاں
    نور پنہاں برجبیں مرد انوار آورد
    ہر کہ از دست کسے خورد است کا سات وصال
    ہرزمان رویش سرورِ واصل یار آورد
    اے مسلمانوں! اگرتم سچے دل سے حضرت خدا وند تعالیٰ اوراس کے مقدس رسول علیہ السلام پر ایمان رکھتے ہو اورنصرت الٰہی کے منتظر ہو تو یقیناًسمجھو کہ نصرت کا وقت آگیا اور یہ کاروبارانسان کی طرف سے نہیں ا ورنہ کسی انسانی منصوبہ نے اس کی بناڈالی بلکہ یہ وہی صُبح صادق ظہور پذیر ہو گئی ہے جس کی پاک نوشتوں میں پہلے سے خبر دی گئی تھی خدائے تعالیٰ نے بڑی ضرورت کے وقت تمہیں یاد کیا قریب تھا کہ تم کسی مہلک گڑھے میں جا پڑتے مگر اُس کے
    ۱؂ بنی اسرائیل: ۳۷ ۲؂ ص:۶۳
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 105
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 105
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    باشفقت ہاتھ نے جلدی سے تمہیں اٹھا لیا سو شکر کرو اور خوشی سے اُچھلو جو آج تمہاری تازگی کا دن آگیا۔خدائے تعالیٰ اپنے دین کے باغ کو جس کی راستبازوں کے خونوں سے آبپاشی ہوئی تھی کبھی ضائع کرنا نہیں چاہتا وہ ہرگز یہ نہیں چاہتا کہ غیر قوموں کے مذاؔ ہب کی طرح اسلام بھی ایک پرانے قصوں کا ذخیرہ ہو جس میں موجودہ برکت کچھ بھی نہ ہو وہ ظلمت کے کامل غلبہ کے وقت اپنی طرف سے نور پہنچاتا ہے کیا اندھیری رات کے بعد نئے چاند کے چڑھنے کے انتظار نہیں ہوتے کیا تم سلخ کی رات کو جو ظلمت کی آخری رات ہے دیکھ کر حکم نہیں کرتے کہ کَل نیا چاند نکلنے والا ہے۔ افسوس کہ تم اس دنیا کے ظاہری قانون قدرت کو تو خوب سمجھتے ہو مگر اس روحانی قانون فطرت سے جو اُسی کا ہم شکل ہے بکلّی بے خبرہو۔
    اے نفسانی مولویو! اور خشک زاہدو! تم پر افسوس کہ تم آسمانی دروازوں کا کھلنا چاہتے ہی نہیں بلکہ چاہتے ہو کہ ہمیشہ بند ہی رہیں اور تم پیر مغاں بنے رہو اپنے دلوں پرنظر ڈالواور اپنے اندر کو ٹٹولو کیا تمہاری زندگی دنیا پرستی سے منزّہ ہے کیا تمہارے دلوں پر وہ زنگار نہیں جس کی وجہ سے تم ایک تاریکی میں پڑے ہو کیا تم اُن فقیہوں اور فریسیوں سے کچھ کم ہو جو حضرت مسیح کے وقت میں دن رات نفس پرستی میں لگے ہوئے تھےؔ پھر کیا یہ سچ نہیں کہ تم مثیل مسیح کے لئے مسیحی مشابہت کا ایک گونہ سامان اپنے ہاتھ سے ہی پیش کر رہے ہوتا خدائے تعالیٰ کی حجت ہر یک طور سے تم پر وارد ہو میں سچ سچ کہتا ہوں کہ ایک کافر کا مومن ہو جانا تمہارے ایمان لانے سے زیادہ تر آسان ہے بہت سے لوگ مشرق اور مغرب سے آئیں گے اور اس خوانِ نعمت سے حِصّہ لیں گے لیکن تم اسی زنگ کی حالت میں ہی مرو گے کاش تم نے کچھ سوچاہوتا۔
    اور مشابہت کے لئے مسیح کی پہلی زندگی کے معجزات جو طلب کئے جاتے ہیں اس بارے میں ابھی بیان کر چکا ہوں کہ احیاء جسمانی کچھ چیز نہیں احیاء روحانی کے لئے یہ عاجز آیاہے اور اُس کا ظہور ہو گا ماسوائے اس کے اگر مسیح کے اصلی کاموں کواُن حواشی سے الگ کر کے دیکھا جائے جو محض افترا کے طور پر یا غلط فہمی کی وجہ سے گھڑے گئے ہیں تو کوئی اعجوبہ نظر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 106
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 106
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    نہیں آتا بلکہ مسیح کے معجزات اورپیشگوئیوں پرجس قدر اعتراض اور شکوک پیداہوتے ہیں میں نہیں سمجھ سکتا کہ کسی اور نبی کے خوارق یا پیشؔ خبریوں میں کبھی ایسے شبہات پیدا ہوئے ہوں کیا تالاب کا قصہ مسیحی معجزات کی رونق دور نہیں کرتا؟اور پیشگوئیوں کا حال اس سے بھی زیادہ تر ابتر ہے کیا یہ بھی کچھ پیشگوئیاں ہیں کہ زلزلے آئیں گے مری پڑے گی لڑائیاں ہوں گی قحط پڑیں گے اور اس سے زیادہ تر قابل افسوس یہ امر ہے کہ جس قدر حضرت مسیح کی پیشگوئیاں غلط نکلیں اِس قدر صحیح نکل نہیں سکیں۔اُنہوں نے یہودااسکریوطی کو بہشت کے بار ۱۲ہ تختوں میں سے ایک تخت دیا تھا جس سے آخر وہ محروم رہ گیا اور پطرس کو نہ صرف تخت بلکہ آسمان کی کُنجیاں بھی دیدی تھیں اور بہشت کے دروازے کسی پر بند ہونے یا کھلنے اُسی کے اختیار میں رکھے تھے مگر پطرس جس آخری کلمہ کے ساتھ حضرت مسیح سے الوداع ہوا وہ یہ تھا کہ اس نے مسیح کے روبرو مسیح پر *** بھیج کر اور قسم کھا کر کہا کہ میں اس شخص کو نہیں جانتا۔ایسی ہی اور بھی بہت سی پیشگوئیاں ہیں جو صحیح نہیں نکلیں مگر یہ بات الزام کے لائق نہیں کیونکہ امور اخباریہ کشفیہ میں اجتہادی غلطیؔ انبیاء سے بھی ہو جاتی ہے۔ حضرت موسیٰ کی بعض پیشگوئیاں بھی اُس صورت پر ظہور پذیر نہیں ہوئیں جس صورت پر حضرت موسیٰ نے اپنے دل میں امید باندھ لی تھی غایت مافی الباب یہ ہے کہ حضرت مسیح کی پیشگوئیاں اَوروں سے زیادہ غلط نکلیں مگریہ غلطی نفس الہام میں نہیں بلکہ سمجھ اور اجتہاد کی غلطی ہے چونکہ انسان تھے اور انسان کی رائے خطا اور صواب دونوں کی طرف جاسکتی ہے اس لئے اجتہادی طور پر یہ لغزشیں پیش آگئیں۔
    اِس مقام میں زیادہ تر تعجب یہ ہے کہ حضرت مسیح معجزہ نمائی سے صاف انکار کر کے کہتے ہیں کہ میں ہرگز کوئی معجزہ دکھا نہیں سکتا مگر پھر بھی عوام الناس ایک انبار معجزات کا ان کی طرف منسوب کر رہے ہیں۔ نہیں دیکھتے کہ وہ تو کھلے کھلے انکار کئے جاتے ہیں چنانچہ ھیرودیس کے سامنے حضرت مسیح جب پیش کئے گئے تو ہیرودیس مسیح کو دیکھ کر بہت خوش ہوا کیونکہ اسے اس کی کوئی کرامت دیکھنے کی اُمید تھی پر ہیرودیس نےؔ ہر چند اِس بارہ میں مسیح سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 107
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 107
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    بہت درخواست کی لیکن اس نے کچھ جواب نہ دیا تب ہیرودیس اپنے تمام مصاحبوں کے سمیت اس سے بے اعتقاد ہو گیا اور اسے ناچیز ٹھہرایا۔دیکھو لوقا باب ۲۲۔
    اب خیال کرنا چاہیئے کہ اگر حضرت مسیح میں اقتداری طور پر جیسا کہ عیسائیوں کا خیال ہے معجزہ نمائی کی قوت ہوتی تو ضرور حضرت مسیح ہیرودیس کو جو ایک خوش اعتقاد آدمی اور ان کے وطن کا بادشاہ تھا کوئی معجزہ دکھاتے مگر وہ کچھ بھی دکھا نہ سکے۔ بلکہ ایک مرتبہ فقیہوں اور فریسیوں نے جن کی قیصر کی گورنمنٹ میں بڑی عزت تھی حضرت مسیح سے معجزہ مانگا تو حضرت مسیح نے انہیں مخاطب کر کے پُر اشتعال اور پُر غضب الفاظ سے فرمایا کہ اس زمانہ کے بد اور حرام کار لوگ نشان ڈھونڈتے ہیں * پرؔ یونس نبی کے نشان کے سوائے کوئی نشان انھیں دکھایانہیں جائیگا۔ دیکھو متی باب ۱۲آیت ۳۹۔اور حضرت مسیح نے یونس نبی کے نشان کی طرف جو اشارہ فرمایا تو اس سے حضرت مسیح کا یہ مطلب تھا کہ یونس نبی مچھلی کے پیٹ میں ہلاک نہیں ہوا بلکہ زندہ رہا اؔ ور زندہ نکل آیا ایساہی میں بھی صلیب پر نہیں مروں گا اور نہ قبر میں مردہ داخل ہوں گا۔
    اسؔ جگہ حضرت مسیح کی تہذیب او راخلاقی حالت پر ایک سخت اعتراض وارد ہوتا ہے۔ کیونکہ متی باب ۲۳آیت۲ میں وہ فرماتے ہیں کہ فقیہ اور فریسی موسیٰ کی گدّی پر بیٹھے ہوئے ہیں یعنے بڑے بزرگ ہیں اور انہیں یہ بھی معلوم تھا کہ وہ لوگ یہودیوں کے مقتداءؔ کہلاتے تھے او رقیصر کے دربار میں بڑی عزت کے ساتھ خاص رئیسوں میں بٹھائے جاتے تھے۔ پھر باوجود ان سب باتوں کے انہیں فقیہوں اور فریسیوں کو مخاطب کر کے حضرت مسیح نے نہایت غیر مہذب الفاظ استعمال کئے بلکہ تعجب تو یہ ہے کہ ان یہودیوں کے معزز بزرگوں نے نہایت نرم اور مؤدبانہ الفاظ سے سراسر انکساری کے طور پر حضرت مسیح کی خدمت میں یوں عرض کی کہ اے اُستاد ہم تم سے ایک نشان دیکھا چاہتے ہیں۔اس کے جواب میں حضرت مسیح نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 108
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 108
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    ہم اور ہمارے نکتہ چین
    بعضے صاحبوں نے نکتہ چینی کے طور پر اس عاجز کی عیب شماری کیؔ ہے اور اگرچہ انسان عیب سے خالی نہیں اور حضرت مسیح کا یہ کہنا سچ ہے کہ میں نیک نہیں ہوں نیک ایک ہی ہے یعنی خدا۔ لیکن چونکہ ایسی نکتہ چینیاں دینی کارروائیوں پر بداثر ڈالتی ہیں اور حق کے طالبوں کو رجوع لانے سے روکتی ہیں اس لئے برعایت اختصار بعض نکتہ چینیوں کا جواب دیا جاتا ہے۔
    پہلی نکتہ چینی اس عاجز کی نسبت یہ کی گئی ہے کہ اپنی تالیفات میں مخالفین کی نسبت سخت الفاظ استعمال کئے ہیں جن سے مشتعل ہو کر مخالفین نے اللہ جلَّشَانُہٗ اور اس کے رسول کریم کی بے ادبی کی اور پُر دشنام تالیفات شائع کر دیں۔ قرآن شریف میں صریح حکم وارد ہے کہ مخالفین کے معبودوں کو سب اور شتم سے یاد مت کرو تاوہ بھی بے سمجھی اور کینہ سے خدائے تعالیٰ کی نسبت سبّ و شتم کے ساتھ زبان نہ کھولیں۔لیکن اس جگہ برخلاف طریق ماموریہ کے سب و شتم سے کام لیا گیا۔ اماالجواب پس واضح ہو کہ اس نکتہ چینی میں معترض صاحبؔ نے
    انہیں مخاطب کر کے یہ الفاظ استعمال کئے کہ اس زمانہ کے بد اور حرامکار لوگ نشان ڈھونڈتے ہیں الخ اور پھر اسی پر بس نہیں کی بلکہ وہ اُن معزز بزرگوں کو ہمیشہ دشنام دہی کے طورپر یاد کرتے رہے۔ کبھی اُنہیں کہااےؔ سانپو اے سانپ کے بچّو۔ دیکھومتی باب ۲۳ آیت ۳۳ کبھی اُنہیں کہا اندھے۔ دیکھو متی باب ۱۵ آیت ۱۴ کبھی اُنہیں کہا اے ریاکارو۔ دیکھو متی باب ۲۳ آیت ۱۳ کبھی انہیں نہایت فحش کلمات سے یہ کہا کہ کنجریاں تم سے پہلے خدائے تعالیٰ کی بادشاہت میں داخل ہوتے ہیں اور کبھی اُن کا نام سُؤر اور کُتّا رکھا۔ دیکھو متی باب ۲۱ آیت۳۱۔ اور کبھی اُنہیں احمق کہا دیکھو متی باب ۲۳ آیت ۱۷ کبھی اُنہیں کہا کہ تم جہنّمی ہو دیکھو متی باب ۲۲ آیت ۱۶۔ حالانکہ آپ ہی حلم اور خُلق کی نصیحت دیتے ہیں بلکہ فرماتے ہیں کہ جو کوئی اپنے بھائی کو احمق کہے جہنّم کی آگ کا سزا وار ہوگا اس اعتراض کا جواب اُن مطاعن کے جواب میں دیا جائے گا جو تہذیب کے بارے میں بعض خوش فہم آدمیوں نے اس عاجز کی نسبت کئے ہیں۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 109
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 109
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    وہ الفاظ بیان نہیں فرمائے جو اس عاجز نے بزعم ان کے اپنی تالیفات میں استعمال کئے ہیں اور درحقیقت سب و شتم میں داخل ہیں۔میں سچ سچ کہتا ہوں کہ جہاں تک مجھے معلوم ہے میں نے ایک لفظ بھی ایسا استعمال نہیں کیا جس کو دشنام دہی کہا جائے بڑے دھوکہ کی با ت یہ ہے کہ اکثر لوگ دشنام دہی اور بیان واقعہ کو ایک ہی صورت میں سمجھ لیتے ہیں اور ان دونوں مختلف مفہوموں میں فرق کرنا نہیں جانتے بلکہ ایسی ہریک بات کو جو دراصل ایک واقعی امر کا اظہار ہو اور اپنے محل پر چسپاں ہو محض اس کی کسی قدر مرارت کی وجہ سے جو حق گوئی کے لازم حال ہوا کرتی ہے دشنام ہی تصور کر لیتے ہیں حالانکہ دشنام اور سب اور شتم فقط اس مفہوم کا نام ہے جو خلاف واقعہ اور دروغ کے طور پر محض آزار رسانی کی غرض سے استعمال کیا جائے اور اگر ہریک سخت اور آزار دہ تقریر کو محض بوجہ اس کے مرارت اور تلخی اور ایذارسانی کے دشنام کے مفہوم میں داخل کر سکتے ہیں تو پھر اقرار کرنا پڑے گا کہ سارا قرآن ؔ شریف گالیوں سے پُر ہے کیونکہ جو کچھ بتوں کی ذلت اور ُ بت پرستوں کی حقارت اور ان کے بارہ میں *** ملامت کے سخت الفاظ قرآن شریف میں استعمال کئے گئے ہیں یہ ہرگز ایسے نہیں ہیں جن کے سننے سے بت پرستوں کے دل خوش ہوئے ہوں بلکہ بلاشبہ ان الفاظ نے ان کے غصہ کی حالت کی بہت تحریک کی ہو گی۔کیا خدائے تعالیٰ کا کفار مکہ کو مخاطب کرکے یہ فرمانا کہ
    اِنَّكُمْ وَمَا تَعْبُدُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ حَصَبُ جَهَـنَّمَ ۱؂ معترض کے من گھڑت قاعدہ کے موافق گالی میں داخل نہیں ہے کیا خدائے تعالیٰ کا قرآن شریف میں کفار کو شَرُّالْبَرِیَّۃ قرار دینا اور تمام رذیل اور پلید مخلوقات سے انہیں بد تر ظاہر کرنا یہ معترض کے خیال کے روسے دشنام دہی میں داخل نہیں ہوگا؟کیاخدائے تعالیٰ نے قرآن شریف میں وَاغْلُظْ عَلَيْهِمْ ْ ۲؂ نہیں فرمایا کیا مومنوں کی علامات میں
    اَشِدَّآءُ عَلَى الْكُفَّارِ ۳؂ نہیں رکھا گیا کیا حضرت مسیح کا یہودیوں کے معزز فقیہوں اور فریسیوں کو سؤر اور کتے کے نام سے پکارنا اور گلیل کے عالی مرتبہ فرمانروا ہیرودیس کا لونبڑی نام ؔ رکھنا اور معزز سردار کاہنوں اور فقیہوں کو
    ۱؂ الانبیاء: ۹۹ ۲؂ التوبۃ:۷۳ ۳؂ الفتح:۳۰
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 110
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 110
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    کنجری کے ساتھ مثال دینا اور یہودیوں کے بزرگ مقتداؤں کو جو قیصری گورنمنٹ میں اعلیٰ درجہ کے عزت دار اور قیصری درباروں میں کُرسی نشین تھے ان کریہہ اور نہایت دل آزار اور خلاف تہذیب لفظوں سے یاد کرنا کہ تم حرام زادے ہو حرام کار ہو شریرہو بدذات ہوبے ایمان ہو احمق ہو ریاکار ہو شیطان ہو جہنمی ہو تم سانپ ہو سانپوں کے بچے ہو۔کیا یہ سب الفاظ معترض کی رائے کے موافق فاش اور گندی گالیاں نہیں ہیں اِس سے ظاہر ہے کہ معترض کا اعتراض نہ صرف مجھ پر اور میری کتابوں پر بلکہ درحقیقت معترض نے خدائے تعالیٰ کی ساری کتابوں اور سارے رسولوں پر نہایت درجہ کے جلے سڑے دل کے ساتھ حملہ کیا ہے اور یہ حملہ انجیل پر سب سے زیادہ ہے کیونکہ حضرت مسیح کی سخت زبانی تمام نبیوں سے بڑھی ہوئی ہے اور انجیل سے ثابت ہے کہ اس سخت کلامی کی وجہ سے کئی مرتبہ یہودیوں نے حضرت مسیح کے مارنے کے لئے پتھر اٹھائے اورسردارؔ کاہن کی بے ادبی سے حضرت مسیح نے اپنے منہ پر طمانچے بھی کھائے اور جیسا کہ حضرت مسیح نے فرمایا تھا کہ میں صلح کرانے نہیں آیا بلکہ تلوار چلانے آیا ہوں سو انہوں نے زبان کی تلوار ایسی چلائی کہ کسی نبی کے کلام میں ایسے سخت اور آزاردہ الفاظ نہیں جیسے انجیل میں ہیں اس زبان کی تلوار چلنے سے آخر مسیح کو کیا کچھ آزار اٹھانے پڑے ایساہی حضرت یحییٰ نے بھی یہودیوں کے فقیہوں اور بزرگوں کوسانپوں کے بچے کہہ کر ان کی شرارتوں اور کارسازیوں سے اپنا سر کٹوایا مگر سوال تو یہ ہے کہ کیا یہ مقدس لوگ پرلے درجہ کے غیر مہذب تھے کیا زمانہ حال کی موجودہ تہذیب کی ان کو بُو بھی نہیں پہنچی تھی؟ اِس سوال کا جواب ہمارے سیّدو مولیٰ مادر و پدرم براو فداباد حضرت ختم المرسلین سیّد الاولین والآخرین پہلے سے دے چکے ہیں اور وہ یہ ہے کہ جب یہ آیتیں اتریں کہ مشرکین رجس ہیں پلید ہیں شرّالبریّہ ہیں سفہاء ہیں اور ذرّیت شیطان ہیں اور ان کے معبود وقود النّار اور حصب جہنم ہیں تو ابوطالب نے آنحضرؔ ت صلی اللہ علیہ وسلم کو بلا کر کہا کہ اے میرے بھتیجے اب تیری
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 111
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 111
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    دشنام دہی سے قوم سخت مشتعل ہوگئی ہے اور قریب ہے کہ تجھ کو ہلاک کریں اور ساتھ ہی مجھ کو بھی۔تو نے ان کے عقل مندوں کو سفیہ قرار دیا اور ان کے بزرگوں کو شرّالبریّہ کہا اور ان کے قابل تعظیم معبودوں کانام ہیزم جہنّم اور وقود النّار رکھااور عام طور پر ان سب کو رجس اور ذرّیت شیطان اور پلید ٹھہرایامیں تجھے خیر خواہی کی راہ سے کہتاہوں کہ اپنی زبان کو تھام اور دشنام دہی سے بازآجاورنہ میں قوم کے مقابلہ کی طاقت نہیں رکھتا۔آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب میں کہاکہ اے چچایہ دشنام دہی نہیں ہے بلکہ اظہار واقعہ اور نفس الامر کا عین محل پر بیان ہے اور یہی تو کام ہے جس کے لئے میں بھیجا گیا ہوں اگر اس سے مجھے مرنا درپیش ہے تو میں بخوشی اپنے لئے اس موت کو قبول کرتا ہوں میری زندگی اسی راہ میں وقف ہے مَیں موت کے ڈر سے اظہار حق سے رک نہیں سکتا اور اے چچا اگر تجھے اپنی کمزوری اور اپنی تکلیف کا خیال ؔ ہے تو تُو مجھے پناہ میں رکھنے سے دست بردار ہوجا بخدا مجھے تیری کچھ بھی حاجت نہیں میں احکام الٰہی کے پہنچانے سے کبھی نہیں رکوں گا مجھے اپنے مولیٰ کے احکام جان سے زیادہ عزیز ہیں بخدا اگر میں اس راہ میں مارا جاؤں تو چاہتا ہوں کہ پھر بار بار زندہ ہو کر ہمیشہ اسی راہ میں مرتا رہوں۔یہ خوف کی جگہ نہیں بلکہ مجھے اس میں بے انتہاء لذت ہے کہ اس کی راہ میں دکھ اٹھاؤں۔آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم یہ تقریر کر رہے تھے اور چہرہ پر سچائی اور نورانیّت سے بھری ہوئی رقت نمایاں ہورہی تھی اور جب آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم یہ تقریر ختم کر چکے تو حق کی روشنی دیکھ کر بے اختیار ابو طالب کے آنسو جاری ہو گئے اور کہا کہ میں تیری اِس اعلیٰ حالت سے بے خبر تھا تُو اور ہی رنگ میں اور اَور ہی شان میں ہے جااپنے کام میں لگارہ جب تک میں زندہ ہوں جہاں تک میری طاقت ہے میں تیرا ساتھ دوں گا۔اب حاصل* کلام ؔ یہ ہے
    حاشیہ:*
    یہؔ سب مضمون ابو طالب کے قصہ کا اگرچہ کتابوں میں درج ہے مگریہ تمام عبارت الہامی ہے جو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 112
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 112
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    کہ جو کچھ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ابو طالب کے اعتراض کا خود اپنی زبان مبارک سے جواب دیا در حقیقت وہی جواب ہریک معترض کے ساکت کرنے کے لئے کافی و وافی ہے کیونکہ دشنام دہی اور چیز ہے اور بیان واقعہ کا گو وہ کیسا ہی تلخ اور سخت ہو دوسری شے ہے ہریک محقق اور حق گو کا یہ فرض ہوتا ہے کہ سچی بات کو پوؔ رے پورے طور پر مخالف گُم گشتہ کے کانوں تک پہنچا دیوے پھر اگر وہ سچ کو سن کر افروختہ ہو تو ہوا کرے ہمارے علماء جو اس جگہ لَا تَسُبُّوْا کی آیت پیش کرتے ہیں میں حیران ہوں کہ اس آیت کو ہمارے مقصد اور مدعا سے کیا تعلق ہے۔ اس آیت کریمہ میں تو صرف دُشنام دہی سے منع فرمایا گیا ہے نہ یہ کہ اظہاؔ ر حق سے روکا گیا ہو اگر نادان مخالف حق کی مرار ت اور تلخی کو دیکھ کر دشنام دہی کی صورت میں اس کو سمجھ لیوے اور پھر مشتعل ہو کر گالیاں دینی شروع کرے توکیا اس سے امر معروف کا دروازہ بند کر دینا چاہیئے؟کیااس قسم کی گالیاں
    خدائے تعالیٰ نے اس عاجز کے دل پر نازل کی صرف ؔ کوئی کوئی فقرہ تشریح کے لئے اس عاجز کی طرف سے ہے اس الہامی عبارت سے ابو طالب کی ہمدردی اور دلسوزی ظاہرہے لیکن بکمال یقین یہ بات ثابت ہے کہ یہ ہمدردی پیچھے سے انوار نبوت وآثار استقامت دیکھ کر پیدا ہوئی تھی ہمارے سیّد ومولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک بڑا حصہ عمر کا جو چالیس برس ہے بیکسی اور پریشانی اور یتیمی میں بسر کیا تھاکسی خویش یا قریب نے اس زمانہ تنہائی میں کوئی حق خویشی اور قرابت کا ادا نہیں کیا تھا یہاں تک کہ وہ روحانی بادشاہ اپنی صغر سنی کی حالت میں لاوارث بچوں کی طرح بعض بیابان نشین اور خانہ بدوش عورتوں کے حوالہ کیا گیا اوراُسی بے کسی اور غریبی کی حالت میں اس سیّد الانام نے شیر خوارگی کے دنؔ پورے کئے اورجب کچھ سن تمیز پہنچاتو یتیم اور بے کس بچوں کی طرح جن کا دنیا میں کوئی بھی نہیں ہوتا اُن بیابان نشین لوگوں نے بکریاں چرانے کی خدمت اُس مخدوم العالمین کے سپُرد کی اور اُس تنگی کے دنوں میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 113
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 113
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    پہلے کفار نے کبھی نہیں دیںآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے حق کی تائیدؔ کے لئے صرف الفاظ سخت ہی استعمال نہیں فرمائے بلکہ بُت پرستوں کے ان بتوں کو جو اُن کی نظر میں خدائی کا منصب رکھتے تھے اپنے ہاتھ سے توڑا بھی ہے۔اسلام نے مداہنہ کو کب جائز رکھا اور ایسا حکم قرآن شریف کے کس مقام میں موجود ہے بلکہؔ اللہ جلّشَانُہٗ مداہنہ کی ممانعت میں صاف فرماتا ہے کہ جو لوگ اپنے باپوں یا اپنی ماؤں کے ساتھ بھی ان کی کفر کی حالت میں مداہنہ کا برتاؤ کریں وہ بھی ان جیسے ہی بے ایمان ہیں اور کفار مکہ کی طرف سے حکایت کرکے فرماتاہے3۱؂ یعنی اس بات کو کفار مکہ دوست رکھتے ہیں کہ اگر تُو حق پوشی کی راہ سے نرمی اختیار کرے تو وہ بھی تیرے دین میں ہاں میں ہاں ملا دیاکریں مگر ایسا ہاں میں ہاں ملانا خدائے تعالیٰ کو منظور نہیں۔غرض آیت قرآنی جو معترض نے پیش کی ہے وہ اگر کسی بات پر دلالت کرتی ہے تو صرف اسی بات پر کہ معترض کو کلام الٰہی کے
    بجز ادنیٰ قسم کے اناجوں یا بکریوں کے دُودھ کے اور کوئی غذانہ تھی جب سن بلوغ پہنچا تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی شادی کے لئے کسی چچاوغیرہ نے باوجود آنحضرت کے اول درجہ کے حسن وجمال کے کچھ فکر نہیں کی بلکہ پچیس برس کی عمر ہونے پر اتفاقی طورپر محض خدائے تعالیٰ کے فضل وکرم سے ایک مکّہ کی رئیسہ نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنے لئے پسند کر کے آپ سے شادی کر لی یہ نہایت تعجب کا مقام ہے کہ جس حالت میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلمؔ کے حقیقی چچا ابو طالب اور حمزہ اور عباس جیسے موجود تھے اور بالخصوص ابوطالب رئیس مکہ اور اپنی قوم کے سردار بھی تھے اوردنیوی جاہ وحشمت ودولت ومقدرت بہت کچھ رکھتے تھے مگر باوجود ان لوگوں کی ایسی امیرانہ حالت کے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وہ ایام بڑی مصیبت اور فاقہ کشی اور بے سامانی سے گذرے یہاں تک کہ جنگلی لوگوں کی بکریاں چرانے تک نوبت پہنچی اور اس دردناک حالت کو دیکھ کر کسی کے آنسو جاری نہیں ہوئے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 114
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 114
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ
    سمجھنے کی مس تک نہیں۔نہیں خیال کرتا کہ اگر یہ آیت ہریک طور کی سخت زبانی سے متعلق سمجھی جائے تو پھر امر معروف اور نہی منکر کا دروازہ بند ہو جانا چاہیئے اور نیز اس صورت میں خدائے تعالیٰ کا کلام دومتناقض امروں کا جامع ماننا پڑے گا یعنی یہ تسلیم کرنا پڑے گا کہ اوّل تو اُس نے ہریک طور کی سخت کلامی سے منع فرمایا اور ہریک محل میں کفار کا دل خوش رکھنے (کے) لئے تاکید کی اور پھر آپؔ ہی اپنے قول کے مخالف کارروائی شروع کرد ی اور ہریک قسم کی گالیاں منکروں کو سنائیں بلکہ گالیاں دینے کے لئے تاکیدکی۔ سوجاننا چاہیئے کہ جن مولویوں نے ایسا خیال کیا ہے کہ گویا عام طور پر ہریک سخت کلامی سے خدائے تعالیٰ منع فرماتاہے۔یہ اُن کی اپنی سمجھ کا ہی قصور ہے ورنہ وہ تلخ الفاظ جو اظہارحق کے لئے ضروری ہیں اور اپنے ساتھ اپنا ثبوت رکھتے ہیں وہ ہریک مخالف کو صاف صاف سنا دینا نہ صرف جائز بلکہ واجبات وقت سے ہے تامداہنہ کی بلا میں مبتلانہ ہو جائیں۔خدائے تعالیٰ کے برگزیدہ بندے ایسی سخت تبلیغ کے وقت میں کسی لاعن کی *** اور کسی لائم کی ملامت سے ہرگز نہیں ڈرے کیا معلوم نہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت میں
    عمر شباب پہنچنے کے وقت کسی چچا کو خیال تک نہیں آیا کہ آخر ہم بھی تو باپ ہی کی طرح ہیں شادی وغیرہ امور ضروریہ کے لئے کچھ فکر کریں حالانکہ اُن کے گھر میں اوراُن کے دوسرؔ ے اقارب میں بھی لڑکیاں تھیں۔ سو اس جگہ بالطبع یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ اس قدر سرد مہری اُن لوگوں سے کیوں ظہور میں آئی اس کا واقعی جواب یہی ہے کہ ان لوگوں نے ہمارے سیّد ومولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا کہ ایک لڑکا یتیم ہے جس کا باپ نہ ماں ہے بے سامان ہے جس کے پاس کسی قسم کی جمعیت نہیں نادار ہے جس کے ہاتھ پلّے کچھ بھی نہیں ایسے مصیبت زدہ کی ہمدردی سے فائدہ ہی کیا ہے اور اُس کو اپنا داماد بنانا تو گویا اپنی لڑکی کو تباہی میں ڈالنا ہے مگر اس بات کی خبر نہیں تھی کہ وہ ایک شہزادہ اورروحانی بادشاہوں کا سردار ہے جس کو دنیا کے تمام خزانوں کی کُنجیاں دی جائیں گی۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 115
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 115
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/115/mode/1up
    جس قدر مشرکین کا کینہ ترقی کر گیاتھا اس کا اصل باعث وہ سخت الفاظ ہی تھے جو اُن نادانوں نے دشنام دہی کی صورت پرسمجھ لئے تھے جن کی وجہ سے آخر لسان سے سنان تک نوبت پہنچی ورنہ اول حال تو وہ لوگ ایسے نہیں تھے بلکہ کمال اعتقاؔ د سے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت کہا کرتے تھے کہ عَشِقَ مُحَمَّدٌ عَلیٰ رَبِّہٖ ۔ یعنی محمد صلی اللہ علیہ وسلم اپنے رب پر عاشق ہو گئے ہیں جیسے آج کل کے ہندو لوگ بھی کسی گوشہ نشین فقیر کو ہرگز بُرا نہیں کہتے بلکہ نذریں نیازیں دیتے ہیں۔
    اس جگہ مجھے نہایت افسوس اور غمگین دل کے ساتھ اس بات کے ظاہر کرنے کی بھی حاجت پڑی ہے کہ یہ اعتراض جو مجھ پر گیا ہے یہ صرف عوام الناس کی طرف سے ہی نہیں بلکہ میں نے سنا ہے کہ بانی مبانی اس اعتراض کے بعض علماء بھی ہیں۔سو میں ان کی شان میں یہ تو ظن نہیں کر سکتاکہ وہ قرآن شریف اور کتب سابقہ سے بے خبر ہیں اور نہ کسی طور سے جائے ظن ہے * لیکن ؔ میں جانتاہوں کہ آج کل کی یورپ کی جھوٹی تہذیب نے
    قرآؔ ن شریف جس آوازبلند سے سخت زبانی کے طریق کواستعمال کر رہا ہے ایک غایت درجہ کا غبی اور سخت درجہ کا نادان بھی اُس سے بے خبر نہیں رہ سکتا۔ مثلًا زمانہ حال کے مہذبین کے نزدیک کسی پر *** بھیجنا ایک سخت گالی ہے۔ لیکن قرآن شریف کفارؔ کو سُنا سُنا کر ان پر *** بھیجتا ہے جیسا کہ فرماتا ہے
    اُولٰٓٮِٕكَ عَلَيْهِمْ لَعْنَةُ اللّٰهِ وَالْمَلٰٓٮِٕكَةِ وَالنَّاسِ اَجْمَعِيْنَۙ
    ۱؂ الجزو ۲ سورۃ بقرہ۔ خٰلِدِيْنَ فِيْهَاۚ
    اُولٰٓٮِٕكَ يَلْعَنُهُمُ اللّٰهُ وَ يَلْعَنُهُمُ اللّٰعِنُوْنَۙ‏ ۲؂۔ الجزو نمبر ۲
    ایسا ہی ظاہر ہے کہ کسی انسان کو حیوان کہنا بھی ایک قسم کی گالی ہے۔ لیکن قرآن شریف نہ صرف حیوان بلکہ کفار اور منکرین کو دنیا کے تمام حیوانات سے بد تر قرار دیتا ہے جیسا کہ فرماتا ہے
    اِنَّ شَرَّ الدَّوَآبِّ عِنْدَ اللّٰهِ الَّذِيْنَ كَفَرُوْ ۳؂۔ ایسا ہی ظاہرہے کہ کسی خاص آدمی کانام لے کر یا اؔ شارہ کے طورپر اس کو نشانہ بنا کر گالی دینا زمانہ حال کی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 116
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 116
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/116/mode/1up
    جو ایمانی غیّوری سے بہت دُور پڑی ہوئی ہے ہمارے علماء کے دلوں کو بھی کسی قدر دبا لیا ہے۔اس سخت آندھی کے چلنے کی وجہ سے ان کی آنکھوں میں بھی کچھ غبارساپڑگیاہے اور ان کی فطرتی کمزوری اس نزلہ کو قبول کر گئی ہے۔اسی وجہ سے وہ ایسے خیالات پر زور دیتے ہیں جن کا کوئی اصل صحیح حدیث و قرآن میں نہیں پایا جاتا ہاں یورپ کی اخلاقی کتابوں میں تو ضرور پایا جاتا ہے اور اؔ ن اخلاق میں یورپ نے یہاں تک ترقی کی ہے کہ ایک جوان عورت سے ایک نامحرم طالب کی بکلّی دل شکنی مناسب نہیں سمجھی گئی۔مگر کیا قرآن شریف یورپ کے ان اخلاق سے اتفاق رائے کرتا ہے؟ کیا وہ ایسے لوگوں کا نام دیّوث نہیں رکھتا؟ میں ایسے علماء کو محض للہ متنبہ کرتا ہوں کہ وہ ایسی نکتہ چینیاں کرنے اور ایسے خیالات کو دل میں جگہ دینے سے حق اور حق بینی سے بہت دور جاپڑے ہیں اگر وہ مجھ سے لڑنے کو تیار ہوں تو اپنی خشکؔ منطق سے جو چاہیں کہیں لیکن اگر وہ خدائے تعالیٰ سے خوف کر کے کسی قدرسوچیں تو یہ ایسی بات نہیں ہے جو ان کی نظر سے پوشیدہ رہ سکے نیک بخت
    تہذیب کے برخلاف ہے لیکن خدائے تعالیٰ نے قرآن شریف میں بعض کا نام ابو لہب اوربعض کانام کلب اور خنزیر کہا اور ابو جہل تو خود مشہور ہے ایسا ہی ولید (بن) مغیرہ کی نسبت نہایت درجہ کے سخت الفاظ جو بصورت ظاہر گندی گالیاں معلوم ہوتی ہیں استعمال کئے ہیں جیساکہ فرماتا ہے
    فَلَا تُطِعِ الْمُكَذِّبِيْنَ وَدُّوْا لَوْ تُدْهِنُ فَيُدْهِنُوْنَ وَلَا تُطِعْ كُلَّ حَلَّافٍ مَّهِيْنٍۙ‏
    هَمَّازٍ مَّشَّآءٍۢ بِنَمِيْمٍۙ مَّنَّاعٍ لِّلْخَيْرِ مُعْتَدٍ اَثِيْمٍۙ عُتُلٍّ ۢ بَعْدَ ذٰلِكَ زَنِيْمٍۙ‏
    سَنَسِمُهٗ عَلَى الْخُـرْطُوْمِ
    ۔۱؂ دیکھوؔ سورہ القلم الجزو نمبر ۲۹۔ یعنی تُو ان مکذّبوں کے کہنے پر مت چل جو بدل اس بات کے آرزو مند ہیں کہ ہمارے معبودوں کو بُرامت کہو اور ہمارے مذہب کی ہجو مت کرو تو پھر ہم بھی تمہارے مذہب کی نسبت ہاں میں ہاں ملاتے رہیں گے اور ان کی چرب زبانی کا خیال مت کر ویہ شخص جو مداہنہ کا خواستگار ہے جھوٹی قسمیں کھانے والااورضعیف الرائے اور ذلیل آدمی ہے دوسروں کے عیب ڈھونڈنے والا اورسخن چینی سے لوگوں میں تفرقہ ڈالنے والاؔ اورنیکی کی ۱؂ القلم: ۹ تا ۱۷
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 117
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 117
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/117/mode/1up
    انسان کا فرض ہے کہ سچائی کے طریقوں کو ہاتھ سے نہ دیوے بلکہ اگر ایک ادنیٰ سے ادنیٰ انسان کی زبان پر کلمہ حق جاری ہو اور اپنے آپ سے غلطی ہو جائے تو اپنی غلطی کا اقرار کر کے شکر گذاری کے ساتھ اس حقیر آدمی کی بات کو مان لیوے اور اَنَا خَیْرٌ مِنْہُ کا دعویٰ نہ کرے ورنہ تکبر کی حالتؔ میں کبھی رشد حاصل نہیں ہوگا بلکہ ایسے آدمی کا ایما ن بھی معرض خطر میں ہی نظر آتاہے۔
    اور سخت الفاظ کے استعمال کرنے میں ایک یہ بھی حکمت ہے کہ خُفتہ دل اس سے بیدار ہوتے ہیں اور ایسے لوگوں کے لئے جو مداہنہ کو پسند کرتے ہیں ایک تحریک ہو جاتی ہے مثلاً ہندوؤں کی قوم ایک ایسی قوم ہے کہ اکثر اُن میں سے ایسی عادت رکھتے ہیں کہ اگر ان کو اپنی طرف سے چھیڑانہ جائے تو وہ مداہنہ کے طورؔ پر تمام عمر دوست بن کر دینی امور میں ہاں سے ہاں ملاتے رہتے ہیں بلکہ بعض اوقات تو ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تعریف وتوصیف اور اس دین کے اولیاء کی مدح و ثنا کرنے لگتے ہیں لیکن دل اُن کے نہایت درجہ کے سیاہ
    راہوں سے روکنے والا زنا کار اور بایں ہمہ نہایت درجہ کا بدخلق اور ان سب عیبوں کے بعد ولدالزنا بھی ہے۔ عنقریب ہم اس کے اس ناک پر جو سُؤر کی طرح بہت لمبا ہوگیا ہے داغ لگادیں گے یعنی ناک سے مراد رسوم اور ننگ وناموس کی پابندی ہے جو حق کے قبول کرنے سے روکتی ہے(اے خدائے قادر مطلق ہماری قوم کے بعض لمبی ناک والوں کی ناک پر بھی اُسترہ رکھ) اب کیوں حضرت مولوی صاحب کیا آپ کے نزدیک ان جامع لفظوں سے کوئی گالی باہر رہ گئی ہے۔ اور اس جگہ ایک نہایت عمدہؔ لطیفہ یہ ہے کہ ولید (بن) مغیر ہ نے نرمی اختیار کر کے چاہا کہ ہم سے نرمی کابرتاؤ کیاجائے۔ اس کے جواب میں اس کے تمام پردے کھولے گئے۔یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ مومنین سے مداہنہ کی امید مت رکھو۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 118
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 118
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/118/mode/1up
    اور سچائی سے دور ہوتے ہیں۔اُن کے رُوبرو سچائی کو اُس کی پوری مرارت اور تلخی کے ساتھ ظاہر کرنا اس نتیجہ خیر کا منتج ہوتاہے کہ اُسی وقت اُن کا مداہنہ دور ہوجاتاہے اور بالجہر یعنی واشگاف اور علانیہ اپنے کفر اور کینہ کو بیان کرنا شروع کردیتے ہیں گویا اُن کی دق کی بیماری محرقہ کی طرف انتقال کرجاتی ہے۔سو یہ تحریک جو طبیعتوں میں سخت جوش پیداکردیتی ہے اگرچہ ایک نادان کی نظر میں سخت اعتراض کے لائق ہے مگر ایک فہیم آدمی بخوبی سمجھ سکتا ہے کہ یہی تحریک رُوبحق کرنے کے لئے پہلا زینہ ہے۔جب تک ایک مرض کے مواد مخفی ہیں تب تک اسؔ مرض کا کچھ علاج نہیں ہو سکتالیکن مواد کے ظہور اور بروز کے وقت ہریک طور کی تدبیر ہو سکتی ہے۔انبیا نے جو سخت الفاظ استعمال کئے حقیقت میں ان کا مطلب تحریک ہی تھا تا خلق اللہ میں ایک جوش پیدا ہو جائے اور خواب غفلت سے اس ٹھوکر کے ساتھ بیدار ہوجائیں اور دین کی طرف خوض اور فکر کی نگاہیں دوڑانا شروع کردیں اور اس راہ میں حرکت کریں گو وہ مخالفانہ حرکت ہی سہی اور اپنے دلوں کا اہل حق کے دلوں کے ساتھ ایک تعلق پیداکرلیں گو وہ عدوانہ تعلق ہی کیوں نہ ہو اسی کی طرف اللہ جلّشَانُہٗ اشارہ فرماتاہے
    فِىْ قُلُوْبِهِمْ مَّرَضٌۙ فَزَادَهُمُ اللّٰهُ مَرَضًا ۱؂
    یقیناسمجھنا چاہیئے کہ دین اسلام کو سچے دل سے ایک دن وہی لوگ قبول کریں گے جو بباعث سخت اور پُرزور جگانے والی تحریکوں کے کتب دینیہ کی ورق گردانی میں لگ گئے ہیں اور جوش کے ساتھ اس راہ کی طرف قدم اُٹھارہے ہیں گو وہ قدم مخالفانہ ہی سہی۔ہندوؤں کا وہ پہلا طریق ہمیں بہت مایوس کرنے والا تھاجو اپنے دلوں میں وہؔ لوگ اس طرز کو زیادہ پسند کے لائق سمجھتے تھے کہ مسلمانوں سے کوئی مذہبی بات چیت نہیں کرنی چاہیئے اور ہاں میں ہاں ملا کر گذارہ کر لینا چاہیئے لیکن اب وہ مقابلہ پرآکر اور میدان میں کھڑے ہو کرہمارے تیز ہتھیاروں کے نیچے آپڑے ہیں اور اس صید قریب کی طرح ہو گئے جس کا ایک ہی ضرب سے کام تمام ہو سکتاہے اُن کی آہوانہ سرکشی سے ڈرنا نہیں چاہیئے ۱؂ البقرۃ:۱۱
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 119
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 119
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/119/mode/1up
    دشمن نہیں ہیں وہ تو ہمارے شکار ہیں عنقریب وہ زمانہ آنے والا ہے کہ تم نظر اُٹھا کر دیکھو گے کہ کوئی ہندو دکھائی دے مگر ان پڑھوں لکھوں میں سے ایک ہندو بھی تمہیں دکھائی نہیں دے گا سو تم اُن کے جوشوں سے گھبرا کر نومید مت ہو کیونکہ وہ اندر ہی اندر اسلام کے قبول کرنے کے لئے تیاری کررہے ہیں اور اسلام کی ڈیوڑھی کے قریب آپہنچے ہیں۔میں تمہیں سچ سچ کہتا ہوں کہ جو لوگ مخالفانہ جوش سے بھرے ہوئے آج تمہیں نظر آتے ہیں تھوڑے ہی زمانے کے بعد تم انہیں نہیں دیکھو گے۔حال میں جو آریوں نے ہم لوگوں کی تحریکؔ سے مناظرات کی طرف قدم اُٹھایا ہے تو اس قدم اُٹھانے میں گو کیسی ہی سختی کے ساتھ اُن کا برتاؤ ہے اور گو گالیوں اور گندی باتوں سے بھری ہوئی کتابیں وہ شائع کر رہے ہیں مگر وہ اپنے جوش سے درحقیقت اسلام کے لئے اپنی قوم کی طرف راہ کھول رہے ہیں اور ہماری تحریکات کا واقعی طور پر کوئی بدنتیجہ نہیں ہاں یہ تحریکات کوتہ نظروں کی نگاہ میں بد نما ہیں مگر کسی دن دیکھنا کہ یہ تحریکات کیوں کر بڑے بڑے سنگین دلو ں کو اس طرف کھینچ لاتی ہیں۔یہ رائے کوئی ظنی اور شکی رائے نہیں بلکہ ایک یقینی اور قطعی امر ہے لیکن افسوس اُن لوگو ں پر جو خیر اور شر میں فرق نہیں کر سکتے اور شتا ب کاری کی راہ سے اعتراض کرنے کے لئے کھڑے ہو جاتے ہیں خدائے تعالیٰ نے ہمیں مداہنہ سے تو صاف منع فرمایا ہے لیکن حق کے اظہار سے باندیشہ اس کی مرارت اور تلخی کے باز آجانا کہیں حکم نہیں فرمایا۔فتدبروا ایّھا العلماء المستعجلون الا تقرؤن القراٰن مالکم کیف تحکمون۔
    میرؔ ے ایک مخلص دوست مولوی عبد الکریم صاحب سیالکوٹی جو نو تعلیم یافتہ جوان اور تربیت جدیدہ کے رنگ سے رنگین اور نازک خیال آدمی ہیں جن کے دل پر میرے محب صادق اخویم مولوی حکیم نورالدین صاحب کی مربیانہ اور اُستادانہ صحبت کا نہایت عمدہ بلکہ خارق عادت اثر پڑا ہوا ہے وہ بھی جو اَب قادیاں میں میرے ملنے کے لئے آئے وعدہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 120
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 120
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/120/mode/1up
    فرما گئے ہیں کہ مَیں بھی تہذیب حقیقی کے بارے میں ایک رسالہ تالیف کر کے شائع کروں گا کیونکہ مولوی صاحب موصوف اس بات کو بخوبی سمجھتے ہیں کہ در اصل تہذیب حقیقی کی راہ وہی راہ ہے جس پر انبیاء علیہم السلام نے قدم مارا ہے جس میں سخت الفاظ کا داروئے تلخ کی طرح گاہ گاہ استعمال کرنا حرام کی طرح نہیں سمجھا گیا بلکہ ایسے درشت الفاظ کا اپنے محل پر بقدرِ ضرورت و مصلحت استعمال میں لانا ہریک مبلغ اور واعظ کا فرض وقت ہے جس کے ادا کرنے میں کسی واعظ کا سُستی اور کاہلی اختیار کرنا اس بات کی نشانی ہے کہ غیراللہ کا خوف جو شرک میں داخل ہےؔ اس کے دل پر غالب اور ایمانی حالت اس کی ایسی کمزور اور ضعیف ہے جیسے ایک کیڑے کی جان کمزور اور ضعیف ہوتی ہے سو میں اُس دوست کے لئے دعا کرتا ہوں کہ خدائے تعالیٰ اس تالیف کے ارادہ میں روح القدس سے اُس کی مدد فرماوے۔میرے نزدیک بہتر ہے کہ وہ اپنے اس رسالہ کا نام تہذیب ہی رکھیں اور مجھے معلوم ہوا ہے کہ میرے اس دوست کو یہ جوش ایک مولوی صاحب کے اعتراض سے پیدا ہوا ہے جو قادیاں کی طرف آتے وقت اتفاقاََ لاہور میں مل گئے تھے جنہوں نے اس عاجز کی نسبت اسی بار ہ میں اعترا ض کیا تھااے خداوند قادر مطلق اگرچہ قدیم سے تیری یہی عادت اور یہی سنت ہے کہ تو بچوں اور اُمیوں کو سمجھ عطا کرتا ہے اور اس دنیا کے حکیموں اور فلاسفروں کی آنکھوں اور دلوں پر سخت پردے تاریکی کے ڈال دیتاہے مگر میں تیری جناب میں عجز اور تضرع سے عر ض کرتا ہوں کہ ان لوگوں میں سے بھی ایک جماعت ہماری طرف کھینچ لا جیسے تُو نے بعض کو کھینچا بھی ہے اور ان کو بھی آنکھیں بخش ؔ اور کان عطا کر اور دل عنایت فرما تا وہ دیکھیں اور سُنیں اور سمجھیں اور تیری اس نعمت کا جو تُو نے اپنے وقت پر نازل کی ہے قدر پہچان کر اس کے حاصل کرنے کے لئے متوجہ ہو جائیں۔اگر تُو چاہے تو تُو ایسا کر سکتاہے کیونکہ کوئی بات تیرے آگے اَن ہونی نہیں۔آمین ثم آمین۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 121
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 121
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/121/mode/1up
    دوسری نکتہ چینی یہ ہے کہ مالیخولیا یا جنون ہو جانے کی وجہ سے مسیح موعودہونے کا دعویٰ کر دیا ہے۔
    اس کا جواب یہ ہے کہ یُوں تو میں کسی کے مجنون کہنے یا دیوانہ نام رکھنے سے ناراض نہیں ہو سکتا بلکہ خوش ہوں۔کیونکہ ہمیشہ سے ناسمجھ لوگ ہر ایک نبی اور رسول کا بھی اُن کے زمانہ میں یہی نام رکھتے آئے ہیں اور قدیم سے ربّانی مصلحوں کو قوم کی طرف سے یہی خطاب ملتا رہا ہے اور نیز اس وجہ سے بھی مجھے خوشی پہنچی ہے کہ آج وہ پیشگوئی پور ی ہوئی جو براھین میں طبع ہو چکی ہے کہ تجھے مجنون بھی کہیں گے لیکن حیرت تو اس بات میں ہے کہ اس دعوےٰ میں کونؔ سے جنون کی علامت پائی جاتی ہے کون سی خلاف عقل بات ہے جس کی وجہ سے معترضین کو جنون ہوجانے کا شک پڑگیااس بات کا فیصلہ ہم معترضین کی ہی کانشنس اور عقل پر چھوڑتے ہیں اور اُن کے سامنے اپنے بیانات اور اپنے مخالفوں کی حکایات رکھ دیتے ہیں کہ ہم دونوں گروہ میں سے مجنون کون ہے اور عقل سلیم کس کی طرز تقریر کو مجانین کی باتوں کے مشابہ سمجھتی ہے اور کس کے بیانات کو قولِ موجَّہ قرار دیتی ہے۔
    میرا بیان مسیح موعود کی نسبت جس کی آسمان سے اُترنے اور دوبار ہ دنیا میں آنے کی انتظار کی جاتی ہے جیسا کہ خدائے تعالیٰ نے اپنے فضل و کرم سے میرے پر کھول دیا ہے یہ ہے کہ مسیح کے دوبارہ دنیا میں آنے کا قرآن شریف میں تو کہیں ذکر نہیں قرآن شریف تو ہمیشہ کے لئے اُس کو دنیا سے رخصت کرتا ہے البتہ بعض حدیثوں میں جو استعارات سے پُر ہیں مسیح کے دوبارہ دنیا میں آنے کے لئے بطور پیشگوئی بیان کیا گیا ہے سو اؔ ن حدیثوں کے سیاق و سباق سے ظاہر ہے کہ اس جگہ در حقیقت مسیح ابن مریم کا ہی دوبارہ دنیا میں آجانا ہرگز مراد نہیں ہے بلکہ یہ ایک لطیف استعارہ ہے جس سے مراد یہ ہے کہ کسی ایسے زمانہ میں جو مسیح ابن مریم کے زمانہ کا ہمرنگ ہوگا ایک شخص
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 122
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 122
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/122/mode/1up
    اصلاح خلائق کے لئے دنیا میں آئے گاجو طبع اور قُوّت اور اپنے منصبی کام میں مسیح بن مریم کا ہمرنگ ہو گا اور جیساکہ مسیح بن مریم نے حضرت موسیٰ کے دین کی تجدید کی اور وہ حقیقت اور مغز توریت کا جس کو یہودی لوگ بھول گئے تھے اُن پر دوبارہ کھول دیا ایسا ہی وہ مسیح ثانی مثیل موسیٰ کے دین کی جو جناب ختم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم ہیں تجدید کرے گااور یہ مثیل موسیٰ کا مسیح اپنی سوانح میں اور دوسرے تمام نتائج میں جو قوم پر ان کی اطاعت یا ان کی سرکشی کی حالت میں مؤثر ہوں گے اس مسیح سے بالکل مشابہ ہو گا جو موسیٰ کو دیا گیا تھا اب جو امر کہ خدائے تعالیٰ نے میرے پر منکشفؔ کیا ہے وہ یہ ہے کہ وہ مسیح موعود میں ہی ہوں۔
    مسلمانوں کا پُرانے خیالات کے موافق جو اُن کے دلوں میں جمے ہوئے چلے آتے ہیں یہ دعویٰ ہے کہ مسیح بن مریم سچ مچ دو فرشتوں کے کندھوں پر ہاتھ دھرے ہوئے آسمان سے اُترے گا اور منارہ مشرقی دمشق کے پاس آٹھہرے گا اور بعض کہتے ہیں کہ منارہ پر اُترے گا اور وہاں سے مسلمان لوگ زینہ کے ذریعہ سے اس کو نیچے اُتاریں گے اور فرشتے اُسی جگہ سے رخصت ہو جائیں گے اور عمدہ پوشاک پہنے ہوئے اُترے گا یہ نہیں کہ ننگا ہو۔اور پھر مہدی کے ساتھ ملاقات اور مزاج پُرسی ہو گی اور باوجود اس قدر مدت گزرنے کے وہی پہلی عمر بتیس ۳۲ یا تینتیس ۳۳ برس کی ہو گی اِس قدر گردش ماہ و سال نے اُس کے جسم و عمر پر کچھ اثر نہ کیا ہو گا اُس کے ناخن اور بال وغیرہ اس قدر سے نہ بڑھے ہوں گے جو آسمان پر اُٹھائے جانے کے وقت موجود تھے اور کسی قسم کا تغیر اس کے وجود میں نہ آیا ہوگا لیکن زمین پر اُتر کر پھر سلسلہ تغیرؔ ا ت کا شروع ہوگا وہ کسی قسم کا جنگ و جدل نہیں کرے گا بلکہ اس کے مُنہ کی ہوا میں ہی ایسی تاثیر ہو گی کہ جہاں تک اس کی نظر پہنچے گی کافر مرتے جائیں گے یعنی اُس کے دَم میں ہی یہ خاصیّت ہو گی کہ زندوں کومارے جیسی پہلے یہ خاصیت تھی کہ مُردوں کو زندہ کرے۔پھر ہمارے علماء اپنے اس پہلے قول کو فراموش کر کے یہ دوسرا قول جو اس کا نقیض ہے پیش کرتے ہیں کہ وہ جنگ اور جدل بھی کرے گا اور دجّال یک چشم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 123
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 123
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/123/mode/1up
    اس کے ہاتھ سے قتل ہو گا یہودی بھی اس کے حکم سے مارے جائیں گے۔پھر ایک طرف تو یہ اقرار ہے کہ مسیح موعود وہی مسیح بن مریم نبی اللہ ہے جس پر انجیل نازل ہوئی تھی جس پر حضرت جبریل اُتراکرتا تھا جو خدائے تعالیٰ کے بزرگ پیغمبروں میں سے ایک پیغمبر ہے اور دوسری طرف یہ بھی کہتے ہیں کہ وہ دوبارہ زمین پر آکر اپنی نبوّت کا نام بھی نہیں لے گا بلکہ منصب نبوت سے معزول ہو کر آئے گا اور ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی اُمت میں داخل ہو کر عام مسلمانوں کی طرح شریعت قرآنی کا پابند ہوگا۔نماز اَوروں کے پیچھے پڑھے گا جیسے عام مسلمان پڑھا کرتے ہیں بعض یہ بھی کہتے ہیں کہ وہ حنفی ہو گا امام اعظم صاحبؔ کو اپنا امام سمجھے گا۔مگر اب تک اس بارہ میں تصریح سے بیان نہیں کیا گیا کہ چار سلسلوں میں سے کس سلسلہ میں داخل ہو گا آیاوہ قادری ہو گا یا چشتی یا سہروردی یا حضرت مجدّد سرہندی کی طرح نقشبندی۔غرض ان لوگوں نے عنوان میں نبوت کا خطاب جما کر جس درجہ پر پھر اُس کا تنزل کیا ہے کوئی قائم الحواس ایساکام کبھی نہیں کر سکتا پھر بعد اس کے اُس کے خاص کا م استعارات کو حقیقت پر حمل کر کے یہ بیان کئے گئے ہیں کہ وہ صلیب کو توڑے گاخنزیروں کو قتل کرے گا۔اب جائے تعجب ہے کہ صلیب کو توڑنے سے اس کا کونسا فائدہ ہے ؟اور اگر اس نے مثلًا دس بیس لاکھ صلیب توڑ بھی دی تو کیا عیسائی لوگ جن کو صلیب پرستی کی دُھن لگی ہوئی ہے اور صلیبیں بنوا نہیں سکتے۔اور دوسرا فقر ہ جو کہا گیا ہے کہ خنزیروں کو قتل کرے گا یہ بھی اگر حقیقت پر محمول ہے تو عجیب فقرہ ہے۔کیا حضرت مسیح کا زمین پر اُترنے کے بعد عمدہ کام یہی ہو گا کہ وہ خنزیروں کا شکار کھیلتے پھریں گے اور بہت سے کتے ساتھ ہوں گے اگر یہی سچ ہے تو پھر سکھوں اور چماروں اور سانسیوں اورؔ گنڈیلوں وغیرہ کو جو خنزیر کے شکار کو دوست رکھتے ہیں خوشخبری کی جگہ ہے کہ ان کی خوب بن آئے گی۔مگر شاید عیسائیوں کو اُن کی اس خنزیر کشی سے کچھ چنداں فائدہ نہ پہنچ سکے کیونکہ عیسائی قوم نے خنزیر کے شکار کو پہلے ہی کمال تک پہنچا رکھا ہے بالفعل خاص لنڈن میں خنزیر کا گوشت فروخت کرنے کے لئے ہزار دُوکان
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 124
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 124
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/124/mode/1up
    موجود ہے اور بذریعہ معتبر خبروں کے ثابت ہوا ہے کہ صرف یہی ہزار دوکان نہیں بلکہ پچیس ہزار اَور خنزیر ہر روز لنڈن میں سے مفصلات کے لوگوں کے لئے باہر بھیجا جاتا ہے اب سوال یہ ہے کہ کیا نبی اللہ کی یہی شان ہونی چاہیئے کہ وہ دنیا میں اصلاح خلق کے لئے تو آوے مگر پھر اپنی اوقات عزیز ایک مکروہ جانور خنزیر کے شکار میں ضائع کرے حالانکہ توریت کے رو سے خنزیر کو چھونا بھی سخت معصیت میں داخل ہے پھر میں یہ بھی کہتا ہوں کہ اول تو شکار کھیلنا ہی کار بیکاراں ہے اور اگر حضرت مسیح کو شکار ہی کی طرف رغبت ہو گی اور دن رات یہی کا م پسند آئے گا تو پھر کیا یہ پاک جانور جیسے ہرن اور گورخر اور خرگوش دنیا ؔ میں کیا کچھ کم ہیں تا ایک ناپاک جانور کے خو ن سے ہاتھ آلودہ کریں۔
    اب میں نے وہ تمام خاکہ جو میری قوم نے مسیح کے ان سوانح کا کھینچ رکھا ہے جو دوبارہ زمین پر اُترنے کے بعد اُن پر گزریں گے پیش کر دیا ہے عقلمند اس پر غور کریں کہ کہاں تک اس میں خلاف قانون قدرت باتیں ہیں۔کہاں تک اس میں اجتماع نقیضین موجود ہے۔کہاں تک یہ شان نبوت سے بعید ہے ؟لیکن اس جگہ یہ بھی یاد رہے کہ یہ تمام ذخیرہ رطب و یابس کا صحیحین میں نہیں ہے۔امام محمد اسمٰعیل بخاری رحمہ اللہ نے اس بارہ میں اشارہ تک بھی نہیں کیا کہ یہ مسیح آنے والا درحقیقت اور سچ مچ وہی پہلا مسیح ہو گا بلکہ انہوں نے دو حدیثیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طر ف سے ایسی لکھی ہیں جنھوں نے فیصلہ کر دیا ہے کہ مسیح اوّل اَور ہے اور مسیح ثانی اَور ہے کیونکہ ایک حدیث کا مضمون یہ ہے کہ ابن مریم تم میں اُترے گا اور پھر بیان کے طور پر کھول دیا ہے کہ وہ ایک تمھار ا امام ہو گا جو تم میں سے ہی ہو گا۔پس ان لفظوں پر خوب غور کرنی چاہیئے جو آنحضر ت صلیؔ اللہ علیہ وسلم لفظ ابن مریم کی تصریح میں فرماتے ہیں کہ وہ ایک تمہاراامام ہو گا جو تم میں سے ہی ہو گا اور تم میں سے ہی پیداہو گا گویاآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اس وہم کو دفع کرنے کے لئے جو ابن مریم کے لفظ سے دلوں میں گذر سکتا تھاما بعد کے لفظوں میں بطور تشریح فرما دیا کہ اُس کو سچ مچ ابن مریم ہی نہ سمجھ لو بل ھُو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 125
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 125
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/125/mode/1up
    امامکم منکم اور دوسری حدیث جو اس بات کا فیصلہ کرتی ہے وہ یہ ہے کہ مسیح اوّل کا حُلیہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اَور طرح کا فرمایا ہے اور مسیح ثانی کا حُلیہ اَور طور کا ذکر کیا ہے جو اس عاجزکے حُلیہ سے بالکل مطابق ہے۔اب سوچنا چاہیئے کہ ان دونوں حُلیوں میں تناقض صریح ہونا کیا اس بات پر پختہ دلیل نہیں ہے کہ درحقیقت مسیح اول اَور ہے اور مسیح ثانی اَور ۔
    ایک اَور بات قابل توجہ یہ ہے کہ ہمارے علماء کی ضد تو اس بات پر ہے کہ ابن مریم کے اُترنے کے بارہ میں جو حدیث ہے اس کو حقیقت پر حمل کرنا چاہیئے لیکن ان کے بعض عقلمندوں سے جب اس حدیث کے معنے پوچھے جائیں کہ ابن مریم اُترے گا اور صلیب کو توڑؔ ے گا اور خنزیر کو قتل کرے گا تو ابن مریم کے لفظ کو تو حقیقت پر ہی حمل رکھتے ہیں اور صلیب اور خنزیر کے بارہ میں کچھ دبی زبان سے ہماری طرح استعارہ اور مجاز سے کام لینا شروع کر دیتے ہیں۔پس وہ لوگ اپنی اس کارروائی سے خود ملزم ٹھہرتے ہیں کیونکہ اس صورت میں اُن پر یہ حجت وارد ہوتی ہے کہ اِن تین لفظوں میں سے جو ابن مریم کااُترنا اور صلیب کا توڑنا اور خنزیروں کا قتل کرنا ہے دو لفظوں کی نسبت تو تم آپ ہی قائل ہو گئے کہ بطور استعارہ ان سے اور معنے مراد ہیں تو پھر یہ تیسرا کلمہ جو ابن مریم کا اُترنا ہے کیوں اس میں بھی بطور استعارہ کوئی اور شخص مراد نہیں ؟ اب میں پوچھتا ہوں کہ کیا ان خیالات مجموعہ تناقضات پر جمے رہنا طریق عقلمندی و فرزانگی ہے یا وہ معارف قریب بفہم و مطابق عقل ہیں جو اس عاجز پر کھولے گئے ہیں۔
    ماسوا اس کے اَور کئی طریق سے اُن پرانے خیالات پر سخت سخت اعتراض عقل کے وارد ہوتے ہیں جن سےَ مخلصی حاصل کرؔ نے کی کوئی صورت نظر نہیں آتی۔
    ازانجملہ ایک یہ ہے کہ قرآن شریف کے کسی مقام سے ثابت نہیں کہ حضرت مسیح اِسی خاکی جسم کے ساتھ آسمان کی طرف اُٹھائے گئے بلکہ قرآن شریف کے کئی مقامات میں مسیح کے فوت ہوجانے کا صریح ذکر ہے اور ایک جگہ خود مسیح کی طرف سے فوت ہوجانے کا اقرار موجود ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 126
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 126
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/126/mode/1up
    اور وہ یہ ہے۔ كُنْتُ عَلَيْهِمْ شَهِيْدًا مَّا دُمْتُ فِيْهِمْ‌ۚ فَلَمَّا تَوَفَّيْتَنِىْ كُنْتَ اَنْتَ الرَّقِيْبَ عَلَيْهِمْ‌ؕ وَاَنْتَ عَلٰى كُلِّ شَىْءٍ شَهِيْدٌ‏
    ۱؂
    اب جب کہ فوت ہوجانا ثابت ہوا تو اس سے ظاہر ہے کہ اُن کا جسم اُن سب لوگوں کی طرح جو مرجاتے ہیں زمین میں دفن کیا گیا ہوگا کیونکہ قرآن شریف بصراحت ناطق ہے کہ فقط اُن کی روح آسمان پر گئی نہ کہ جسم۔ تب ہی تو حضرت مسیح نے آیت موصوفہ بالا میں اپنی موت کا صاف اقرار کر دیا اگر وہ زندوں کی شکل پر خاکی جسم کے ساتھ آسمان کی طرف پرواز کرتے تو اپنے مرجانے کا ہرگز ذکر نہ کرتے اور ایسا ہرگز نہ کہتے کہ میں وفات پا کر اس جہان سے رخصت کیا گیا ہوں۔ ابؔ ظاہر ہے کہ جبکہ آسمان پر اُن کی روح ہی گئی تو پھر نازل ہونے کے وقت جسم کہاں سے ساتھ آجائے گا۔
    ازانجملہ ایک یہ اعتراض ہے کہ نیا اور پُرانا فلسفہ بالاتفاق اس بات کو محال ثابت کرتا ہے کہ کوئی انسان اپنے اس خاکی جسم کے ساتھ کُرَّۂ زَمْہَرِیْر تک بھی پہنچ سکے بلکہ علم طبعی کی نئی تحقیقاتیں اس بات کو ثابت کر چکی ہیں کہ بعض بلند پہاڑوں کی چوٹیوں پر پہنچ کر اس طبقہ کی ہوا ایسی مُضرِّ صحت معلوم ہوئی ہے کہ جس میں زندہ رہنا ممکن نہیں۔پس اس جسم کا کُرَّۂ ماہتاب یا کُرَّۂ آفتاب تک پہنچنا کس قدر لغو خیال ہے *
    *حاشیہ اس جگہ اگر کوئی اعتراض کرے کہ اگر جسم خاکی کا آسمان پر جانا محالات میں سے ہے تو پھر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا معراج اس جسم کے ساتھ کیوں کر جائز ہوگا۔ تو اس کا جواب یہ ہے کہ سیر معراج اس جسم کثیف کے ساتھ نہیں تھا بلکہ وہ نہایت اعلیٰ درجہ کا کشف تھاجس کو درحقیقت بیداری کہنا چاہیئے۔ ایسے کشف کی حالت میں انسان ایک نوری جسم کے ساتھ حسبؔ استعداد نفس ناطقہ اپنے کے آسمانوں کی سیر کر سکتا ہے پس چونکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے نفس ناطقہ کی اعلیٰ درجہ کی استعداد تھی اور انتہائی نقطہ تک پہنچی ہوئی تھی اس لئے وہ اپنی معراجی سیر میں معمورہ عالم کے انتہائی نقطہ تک جوعرش عظیم سے تعبیر کیا جاتا ہے پہنچ گئے سو درحقیقت یہ سیر کشفی تھا جو بیداری سے اشد درجہ پر مشابہ ہے بلکہ ایک قسم کی بیداری ہی ہے۔ میں اس کانام خواب ہرگز نہیں رکھتا اور نہ کشف کے ادنیٰ درجوں میں سے اس کو سمجھتا ہوں بلکہ یہ کشف کا بزرگ ترین مقام ہے جو درحقیقت بیداری بلکہ اس کثیف بیداری سے یہ حالت زیادہ اصفٰی اوراجلٰی ہوتی ہے اور اس قسم کے کشفوں میں مؤلف خود صاحب تجربہ ہے۔ اس جگہ زیادہ لکھنے کی گنجائش نہیں۔ انشاء اللہ کسی اَور محل میں مفصل طورپر بیان کیاجائے گا۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 127
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 127
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/127/mode/1up
    ازانجملہ ایک یہؔ اعتراض ہے کہ جو لوگ آسمانوں کے وجود کے قائل ہیں وہ البتہ اُن کی حرکت کے بھی قائل ہیں اور حرکت بھی دولابی خیال کرتے ہیں اب اگر فرض کیا جائے کہ حضرت مسیح جسم خاکی کے ساتھ آسمان پر گئے ہیں تو ظاہر ہے کہ وہ ہر وقت اُوپر کی سمت میں ہی نہیں رہ سکتے بلکہ کبھی اُوپر کی طرف ہوں گے اور کبھی زمین کے نیچے آ جاؔ ئیں گے اس صورت میں اس بات پر وثوق بھی نہیں ہو سکتاہے کہ وہ ضرور اُوپر کی ہی طرف سے اُتریں گے کیا یہ ممکن نہیں کہ زمین کے نیچے سے ہی نکل آویں کیونکہ درحقیقت اُن کا ٹھکانہ تو کسی جگہ نہ ہوا اگر صبح آسمان کے اُوپر ہوئے تو شام کو زمین کے نیچے۔ پس ایسی مصیبت اُن کے لئے روا رکھنا کس درجہ کی بے ادبی میں داخل ہے۔
    ازانجملہ ایک یہ اعتراض کہ اگر ہم فرض محال کے طور پرقبول کر لیں کہ حضرت مسیح اپنے جسم خاکی کے سمیت آسمان پر پہنچ گئے تو اس بات کے اقرار سے ہمیں چار ہ نہیں کہ وہ جسم جیساکہ تمام حیوانی و انسانی اجسام کے لئے ضروری ہے آسمان پر بھی تاثیر زمانہ سے ضرور متاثر ہو گا اور بمرور زمانہ لابدی اور لازمی طور پر ایک دن ضرور اس کے لئے موت واجب ہو گی پس اس صورت میں اول تو حضرت مسیح کی نسبت یہ ماننا پڑتا ہے کہ اپنی عمر کا دورہ پوراکر کے آسمان ہی پر فوت ہو گئے ہوں اور کواکب کی آبادی جو آج کل تسلیم کی جاتی ہے اُسی کے کسی قبرستان میں دفن کئےؔ گئے ہوں اور اگر پھر فرض کے طور پراب تک زندہ رہنا اُن کا تسلیم کر لیں تو کچھ شک نہیں کہ اتنی مدت گزرنے پر پِیر فَرتوت ہو گئے ہوں گے اور اس کام کے ہرگز لائق نہیں ہوں گے کہ کوئی خدمت دینی اداکر سکیں پھر ایسی حالت میں اُن کا دنیا میں تشریف لانا بجُز ناحق کی تکلیف کے اور کچھ فائدہ بخش معلوم نہیں ہوتا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 128
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 128
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/128/mode/1up
    وہ علامات جو مسیح نے استعارہ کے طورپر اپنے آنے کے بیان کئے ہیں اور نیز سورۃ الزلزال کی تفسیر
    مسیح نے اپنے دوبارہ آنے کا نشان یہ بتلایا ہے کہ اُن دنوں میں تُرت سورج اندھیرا ہو جائے گا اور چاند اپنی روشنی نہیں دے گا اور ستارے آسمان سے گر جائیں گے اور آسمان کی قوتیں ہل جائیں گی تب ابن آدم کا نشان آسمان پر ظاہر ہو گا اور ابن آدم کوبڑی قدرت اور جلال کے ساتھ آسمان کے بادلوں پر آؔ تے دیکھیں گے اور وہ نرسنگے کے بڑے شور کے ساتھ اپنے فرشتوں کو بھیجے گا اور وَے اُس کے برگزیدوں کو چاروں طرف سے آسمان کی اِس حد سے اُس حد تک جمع کریں گے جب تم یہ سب کچھ دیکھو تو جانو کہ وہ نزدیک بلکہ دروازہ پر ہے میں تمہیں سچ سچ کہتا ہو ں کہ جب تک یہ سب کچھ ہو نہ لے اِس زمانہ کے لوگ گذرنہ جائیں گے آسمان و زمین ٹل جائیں گے پر میری باتیں ہرگز نہ ٹلیں گی لیکن اُس دن اور اُس گھڑی کو میرے باپ کے سوا آسمان کے فرشتوں تک کوئی نہیں جانتا جیسا نوح کے دنوں میں ہوا ویسا ہی ابن آدم کا آنا بھی ہو گا کیونکہ جس طرح اُن دنوں میں طوفان کے پہلے کھاتے پیتے بیاہ کرتے بیاہے جاتے تھے اس دن تک کہ نوح کشتی پر چڑھا اور نہ جانتے تھے جب تک کہ طوفان آیا اور اُن سب کو لے گیا اِسی طرح ابن آدم کا آنابھی ہو گا یعنی جس طرح کہ نوح کی کشتی بنانے سے پہلے لوگ امن اور آرام سے بستے تھے کوئی ارضی یا سماوی حادثہ اُن پر وارد نہ تھااسی طرح ابن آدم یعنی مسیح بھی لوگوں کے آؔ رام اور خوشحالی کے وقت میں آئے گا اُس کے آنے سے پہلے کسی قسم کا حادثہ لوگوں پر نازل نہیں ہو گا بلکہ معمولی طور پر امن اور راحت سے دنیا اپنے اپنے کاموں میں مشغول ہو گی دیکھو متی باب ۲۴۔
    حضرت مسیح کے اِس بیان میں بظاہر صورت جس قدر تناقض ہے ناظرین نے سمجھ لیا ہو گا کیونکہ اُنہوں نے اپنے اُترنے سے پہلے اس امر کو ضروری ٹھہرایا ہے کہ سورج اندھیرا ہو جائے اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 129
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 129
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/129/mode/1up
    چاند روشنی نہ دیوے اور ستارے آسمان کے زمین پر گر جائیں۔سو اِن علامات کو اگر ظاہر پر حمل کیا جائے تو یہ معنے بدیہی البطلان ہیں کیونکہ جس وقت سور ج اندھیراہو گیا اور چاندکی روشنی جاتی رہی تو پھر دنیا کیوں کر نوح کے زمانے کی طرح امن سے آباد رہ سکتی ہے بھلا یہ بھی جانے دو شاید دنیا سخت مصیبت کے ساتھ گذارہ کر سکے لیکن زمین پر ستاروں کے گرنے سے کیا زمین کے باشندوں میں سے کوئی باقی رہ سکتا ہے سچ تو یہ ہے کہ اگر آسمان کا ایک بھی ستارہ زمین پر گرے تو تمام دنیا کے ہلاک کرنے کے لئے کافی ہے کیونکہ کوئی ستارہ عرض طول میں زمینؔ کے معمورہ سے کم نہیں ہے ایک ستارہ گر کر زمین کی تمام آبادی کو دبا سکتا ہے چہ جائیکہ تمام ستارے زمین پر گریں اور اُن کے گرنے سے ایک آدمی کو بھی آسیب نہ پہنچے بلکہ حضرت نوح کے زمانہ کی طرح مسیح کے اُترنے سے پہلے امن اور جمعیت سے آباد ہوں اور مسیح کو بڑی قدرت اور جلال کے ساتھ آسمان کے بادلوں پر آتے دیکھیں۔
    سو اے حق کے طالبو! یقینًا سمجھو کہ یہ سب استعارات ہیں حقیقت پر ہرگز محمول نہیں حضرت مسیح کا مطلب صرف اتنا ہے کہ وہ دین کے لئے ایک تاریکی کا زمانہ ہو گااور ایسی ضلالت کی تاریکی ہو گی کہ اُس وقت نہ آفتاب کی روشنی سے جو رسول مقبول اور اس کی شریعت اور اس کی کتاب ہے لوگ آنکھیں کھولیں گے کیونکہ اُن کے نفسانی حجابوں کی وجہ سے آفتاب شریعت ان کے لئے اندھیرا ہو جائے گا اور ماہتاب بھی انہیں روشنی نہیں دے گا یعنی اولیا کے وجود سے بھی انہیں کچھ فائدہ نہ ہوگا کیونکہ بے دینی کے بڑھ جانے سے مردانِ خدا کی محبتؔ بھی اُن کے دلوں میں نہیں رہے گی اور آسمان کے ستارے گریں گے یعنی حقّانی علماء فوت ہوجائیں گے اور آسمان کی قوتیں ہل جائیں گی یعنی آسمان اُوپر کی طرف کسی کو کھینچ نہیں سکے گا۔ دن بدن لوگ زمین کی طرف کھینچے چلے جائیں گے یعنی لوگوں پر نفس امّارہ کے جذبات غالب ہوں گے اُس وقت نہ لڑائیاں ہوں گی اور نہ عامہ خلائق کے امن اور عافیت میں خلل ہوگا بلکہ نوح کے زمانہ کی طرح ایک امن بخش گورنمنٹ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 130
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 130
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/130/mode/1up
    کے تحت میں * وہ لوگ ؔ زندگی بسر کرتے ہوں گے جن میں مسیح موعود نازل ہوگا۔ یاد رکھنا چاہیئے کہ حضرت نوح کا زمانہ باعتبار اپنی معاشرت کے اصولوں کے نہایت امن کا زمانہ تھا لوگ اپنی لمبی لمبی عمروں کو نہایت آسائش اور امن اور خیر و عافیت سے بسر کر رہے تھے۔ اسی وجہ سے لوگ سخت درجہ کے غافل ہوگئے تھے معلوم نہیں کہ اُس وقت کوئی شخصی سلطنت تھی یا جمہوری اتفاق سے اس درجہ پر عامہ خلائق کے لئے ہر طرح سے آسودگی پیدا ہوگئی تھی بہرحال اس زمانہ کے لوگ آرام پانے میں اور امن و عافیت میں زندگی بسر کرنے میں اس زمانہ کے اُن لوگوں سے بہت مشابہ ہیں جوگورنمنٹ برطانیہ کے سایۂ عاطفت کے نیچے زندگی بسر کرتے ہیں گورنمنٹ کی طرف سے جس قدر اسباب آرام اور امن اور خوشحالی کے رعیت کے لئے مہیّا کئے گئے ہیں اُن کا شمار کرنا مشکل ہے گویا اُن کی اس زندؔ گی کو ایک نمونہ بہشت کا بنادیا گیا ہے لیکن غایت درجہ کے آرام پانے سے اور نہایت درجہ کے امن کی وجہ سے یہ آفت دلوں میں پیدا ہو گئی ہے کہ دنیا کی زندگی نہایت شیریں متصور ہو کر دن بدن اس کی محبت دلوں میں بڑھتی جاتی ہے جس طرف نظر ڈال کر دیکھو یہی خواہش جوش مار رہی ہے کہ دنیا کی یہ مراد حاصل ہو جائے وہ مراد حاصل ہو جائے اور بباعث امن پھیل جانے کے دنیاکی ہریک چیز کا قدر بڑھتا جاتاہے۔وہ مزروعہ زمین جس کو سکھوں کے عہد میں کوئی مفت بھی نہیں لے سکتا تھا لاکھوں روپیوں پر فروخت ہو رہی ہے اور یہاں تک مفاد کی راہیں کھل گئی ہیں کہ لوگ * حاشیہ میرؔ ا یہ دعویٰ ہے کہ تمام دنیا میں گورنمنٹ برطانیہ کی طرح کوئی دوسری ایسی گورنمنٹ نہیں جس نے زمین پر ایسا امن قائم کیا ہو مَیں سچ سچ کہتا ہوں کہ جو کچھ ہم پوری آزاد ی سے اس گورنمنٹ کے تحت میں اشاعتِ حق کر سکتے ہیں یہ خدمت ہم مکہ معظمہ یا مدینہ منورہ میں بیٹھ کر بھی ہرگز بجا نہیں لاسکتے اگر یہ امن اورآزادی اور بے تعصبی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے ظہور کے وقت عرب میں ہوتی تو وہ لوگ ہرگز تلوار سے ہلاک نہ کئے جاتے اگریہ امن اور آزادی اور بے تعصبی اُسؔ وقت کے قیصر اور کسریٰ کی گورنمنٹوں میں ہوتی تو وہ بادشاہتیں اب تک قائم رہتیں۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 131
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 131
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/131/mode/1up
    نجاست اور ہڈیوں کی فروخت سے وہ فوائد حاصل کرتے ہیں کہ اس سے پہلے زمانوں میں اعلیٰ درجہ کے غلوں کی فروخت میں وہ فوائد حاصل نہیں ہو سکتے تھے اور نہ صرف یہی آرام کی صورتیں ہیں بلکہ نظر اُٹھا کر دیکھو تو تمام اسباب معاشرت و حاجات سفر و حضر کے متعلق وہ آرام کی سبیلیں نکل آئی ہیں جو اس سے پہلے وقتوں میںؔ شاید کسی نے خواب میں بھی نہ دیکھی ہوں گی پس اس مبار ک گورنمنٹ کے زمانہ کو اگر اُس امن کے زمانہ میں۱؂ سے مشابہت دیں جو حضرت نوح کے وقت میں تھا تو یہ زمانہ بلاوجہ۲؂ اس کا مثیل غالب ہو گا۔
    اب جب کہ یہ ثابت ہو چکا کہ سچے مسیح نے اُس زمانہ میں آنے کا ہرگز وعدہ نہیں کیا جو جنگ و جدل اور جو روجفاکا زمانہ ہو جس میں کوئی شخص امن سے زندگی بسر نہ کر سکے اور نیک لوگ پکڑیں جائیں اور عدالتوں میں سپُرد کئے جائیں اور قتل کئے جائیں بلکہ مسیح نے صاف لفظوں میں فرما دیاکہ اُن پُر فتنہ زمانوں میں جھوٹے مسیح عیسائیوں اور یہودیوں میں پیدا ہوں گے جیساکہ اُن پہلے زمانوں میں کئی لوگ ایسے پیدابھی ہو چکے ہیں جنہوں نے مسیح ہونے کا دعویٰ کیا تھا اِسی وجہ سے مسیح نے تاکید سے کہا کہ میرا آنا اُن اوائل زمانوں میں ہرگزنہیں ہو گا اور شور اور فساد اور جورو جفااور لڑائیوں کے دنوں میں ہرگز نہیں آؤں گا بلکہ امن کے دنوں میں آؤں گا ہاں اسؔ وقت بباعث غایت درجہ کے امن و آرام کے بے دینی پھیلی ہوئی ہو گی اور محبت الٰہی دلوں سے اُٹھی ہوئی ہو گی جیساکہ نوح کے وقت میں تھا سو یہ ایک نہایت عمدہ نشان ہے جو مسیح نے اپنے آنے کے لئے پیش کیا ہے اگرچاہو تو اس کو قبول کر سکتے ہو۔
    اِس جگہ اس سوال کا حل کرنا بھی ضروری ہے کہ مسیح کس عمدہ اور اہم کام کے لئے آنے والا ہے۔ اگر یہ خیال کیا جائے کہ دجّال کے قتل کرنے کے لئے آئے گا تو یہ خیال نہایت ضعیف اور بودا ہے۔کیونکہ صرف ایک کافر کا قتل کرنا کوئی ایسا بڑا کام نہیں جس کے لئے ایک نبی کی ضرورت ہو خاص کر اس صورت میں کہ کہا گیا ہے کہ اگر مسیح قتل بھی نہ کرتا تب بھی دجّال خود بخود پگھل کر نابود ہو جاتا۔ بلکہ سچ تو یہ ہے کہ مسیح کا آنا اس لئے خدائے تعالیٰ کی طرف سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 132
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 132
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/132/mode/1up
    مقرر کیا گیا ہے کہ تا تمام قوموں پر دین اسلام کی سچائی کی حجت پوری کرے تا دنیاکی ساری قوموں پر خدائے تعالیٰ کا الزام وارد ہو جائے۔اِسی کی طرف اشار ہ ہے کہ ؔ جو کہا گیا ہے کہ مسیح کے دم سے کافر مریں گے یعنی دلائل بیّنہ اور بَراہین قاطعہ کی رُو سے وہ ہلاک ہو جائیں گے۔
    دوسرا کام مسیح کا یہ ہے کہ اسلام کوغلطیوں اور الحاقاتِ بے جا سے منزّہ کر کے وہ تعلیم جو روح اور راستی سے بھری ہوئی ہے خلق اللہ کے سامنے رکھے۔
    تیسرا کام مسیح کا یہ ہے کہ ایمانی نور کو ۱؂دنیا کی تمام قوموں کے مستعد دلوں کو بخشے اور منافقوں کو مخلصوں سے الگ کر دیوے۔سو یہ تینوں کام خدائے تعالیٰ نے اس عاجزکے سپُرد کئے ہیں اور حقیقت میں ابتدا سے یہی مقرر ہے کہ مسیح اپنے وقت کا مجدد ہو گا اور اعلیٰ درجہ کی تجدید کی خدمت خدائے تعالیٰ اُس سے لے گا اور یہ تینوں امور وہ ہیں جو خدائے تعالیٰ نے ارادہ فرمایا ہے جو اس عاجز کے ذریعہ سے ظہور میں آویں سو وہ اپنے ارادہ کو پوراکرے گا اور اپنے بندہ کامددگار ہو گا۔
    اگر یہ کہا جائے کہ احادیث صاف اور صریح لفظوں میں بتلارہی ہیں کہ مسیح ابن مریم آسمان سے اُترے گا اور دمشق کے منارہ شرقیؔ کے پاس اُس کا اُترنا ہو گا اور دوفرشتوں کے کندھوں پر اُس کے ہاتھ ہوں گے تو اس مصرّ ح اور واضح بیان سے کیوں کر انکار کیا جائے؟اس کا جواب یہ ہے کہ آسمان سے اُترنا اس بات پر دلالت نہیں کرتاکہ سچ مچ خاکی وجود آسمان سے اُترے بلکہ صحیح حدیثوں میں تو آسمان کا لفظ بھی نہیں ہے اور یوں تو نزول کا لفظ عام ہے جو شخص ایک جگہ سے چل کر دوسری جگہ ٹھہرتا ہے اس کو بھی یہی کہتے ہیں کہ اُس جگہ اُترا ہے جیسے کہا جاتا ہے کہ فلاں جگہ لشکر اُترا ہے یا ڈیرا اُترا ہے کیا اس سے یہ سمجھا جاتاہے کہ وہ لشکر یا وہ ڈیرا آسمان سے اُتراہے ماسوائے اس کے خدائے تعالیٰ نے تو قرآن شریف میں صاف فرما دیاہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم بھی آسمان سے ہی اُترے ہیں بلکہ ایک جگہ فرمایا ہے کہ لوہا بھی ہم نے آسمان سے اُتاراہے۔پس صاف ظاہر ہے کہ یہ آسمان سے اُترنا اُس
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 133
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 133
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/133/mode/1up
    صورت اور رنگ کا نہیں ہے جس صورت پر لوگ خیال کر رہے ہیں اورباوجود عام طور پر استعارات کے پائے جانے کے جن سے حدیثیں پُر ہیں۔اور مکاشفات اوررویاءِؔ صالحہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اُن سے بھری پڑی ہیں۔پھر دمشق کے لفظ سے دمشق ہی مراد رکھنا دعویٰ بلا دلیل و التزام مالایلزم ہے *۔اور یہ بھی یاد رکھنے کے لائق ہے کہ خدائے تعالیٰ کی پیشگوئیوں میں بعض امور کا اخفا اور بعض کا اظہارہو تاؔ ہے اور ایسا ہونا شاذونادر ہے کہ من کل الوجوہ اظہارہی ہو کیونکہ پیشگوئیوں میں حضرت باری تعالیٰ کے ارادہ میں ایک قسم کی خلق اللہ کی آزمائش بھی منظور ہوتی ہے اور اکثر پیشگوئیاں اس آیت کا مصداق ہوتی ہیں کہ
    ۱ يُضِلُّ بِهٖ ڪَثِيْرًا وَّيَهْدِىْ بِهٖ كَثِيْرًا ؂ اسی وجہ سے ہمیشہ ظاہر پرست لوگ امتحان میں پڑ کر پیشگوئی کے ظہور کے وقت دھوکا کھاجاتے ہیں اور زیادہ تر انکار کرنے والے اور حقیقت مقصودہ سے بے نصیب رہنے والے وہی لوگ ہوتے ہیں کہ جو چاہتے ہیں کہ حرف حر فؔ پیشگوئی کا ظاہری طور پر جیساکہ سمجھا
    * حاشیہ استعاؔ رات جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے مکاشفات اور خوابوں میں پائے جاتے ہیں وہ حدیثوں کے پڑھنے والوں پر مخفی اور پوشیدہ نہیں ہیں کبھی کشفی طورپر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنے ہاتھوں میں دو سونے کے کڑے پہنے ہوئے دکھائی دئے اور اُن سے دوکذّاب مراد لئے گئے جنہوں نے جھوٹے طور پر پیغمبری کا دعویٰ کیا تھا اور کبھی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنی رؤیا اور کشف میں گائیاں ذبح ہوتی نظر آئیں اور ان سے مراد وہ صحابہ تھے جو جنگِ اُحد میں شہید ہوئے اور ایک دفعہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے ایک کشف میں دیکھا کہ ایک بہشتی خوشہ انگور ابوجہل کے لئے آپکو دیا گیا ہے تو آخر اُس سے مراد عکرمہ نکلا اور ایک دفعہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو کشفی طورپر نظر آیا کہ گویا ؔ آپ نے ایک ایسی زمین کی طرف ہجرت کی ہے کہ وہ آپ کے خیال میں یمن ۲؂ تھا۔ مگر درحقیقت اس زمین سے مراد مدینہ منورہ تھا۔ ایسا ہی بہت سی نظیریں دوسرے انبیاء کے مکاشفات میں پائی جاتی ہیں کہ بظاہر صورت اُن پر کچھ ظاہر کیا گیا اور دراصل اس سے مراد کچھ اَور تھا سو انبیا کے کلمات میں استعارہ اور مجاز کا دخل ہونا کوئی شاذ ونادر امر نہیں ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 134
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 134
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/134/mode/1up
    گیاہو پورا ہو جائے حالانکہ ایساہرگز نہیں ہوتا مثلًا مسیح کی نسبت بعض بائیبل کی پیشگوئیوں میں یہ درج تھا کہ وہ بادشاہ ہو گا لیکن چونکہ مسیح غریبوں اور مسکینوں کی صورت پر ظاہر ہوا اس لئے یہودیو ں نے اس کو قبول نہؔ کیا اور اِس ردّ اور انکار کی وجہ صرف الفاظ پرستی تھی کہ انہوں نے بادشاہت کے لفظ کو فقط ظاہر پر محمول کر لیا۔ایسا ہی حضرت موسیٰ کی توریت میں ہمارے سیّد و مولیٰ محمد مصطفٰے صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت یہ پیشگوئی درج تھی کہ وہ بھی بنی اسرائیل میںؔ سے اور اُن کے بھائیوں میں سے پیدا ہو گا اس لئے یہودی لوگ اس پیشگوئی کا منشا یہی سمجھتے رہے کہ وہ بنی اسرائیل میں سے پیدا ہو گا حالانکہ بنی اسرائیل کے بھائیوں سے بنی اسماعیل مراد ہیں خدائے تعالیٰ قادر تھا کہ بجائے بنی اسرائیل کے بھائیو ں کےؔ بنی اسماعیل ہی لکھ دیتا
    بقیہ حاشیہ۔ اور نہ کوئی ایسی بات ہے کہ جو تصنّع اور بناوٹ سے گھڑنی پڑتی ہے بلکہ یہ عادت انبیاء کی شائع متعارف ہے کہ وہ روح القدس سے پُر ہو کر مثالوں اور استعاروں میں بولا کرتے ہیں اور وحی الٰہی کو یہی طرز پسند آئی ہوئی ہے کہ اِس جسمانی عالم میں جو کچھ آسمان سے اُتارا جاتا ہے اکثر اس میں استعارات ومجازات پُر ہوتے ہیں عام طور پر جو ہرایک فرد بشر کو کوئی نہ کوئی سچیؔ خواب آجاتی ہے جو نبوت کا چھیالیسواں ۴۶ حصہ بیان کی گئی ہے اُس کے اجزاپر بھی اگر نظر ڈال کر دیکھو تو شاذو نادر کوئی ایسی خواب ہو گی جو استعارات اور مجازات سے بکلی خالی ہو۔
    اب یہ بھی جاننا چاہیئے کہ دمشق کا لفظ جو مسلم کی حدیث میں وارد ہے یعنی صحیح مسلم میں یہ جو لکھا ہے کہ حضرت مسیح دمشق کے منارہ سفید شرقی کے پاس اُتریں گے یہ لفظ ابتدا سے محقق لوگوں کو حیران کرتا چلا آیا ہے کیونکہ بظاہر کچھ معلوم نہیں ہوتا کہ مسیح کو دمشق سے کیا مناسبت ہے اور دمشق کو مسیح سے کیا خصوصیت۔ ہاں اگر یہ لکھا ہوتا کہ مسیح مکّہ معظمہ میں اُترے گا یا مدینہ منورہ میں نازل ہوگا تو ان ناموں کا ظاہرپر حمل کرنا موزوں بھی ہوتا۔ کیونکہ مکّہ معظمہ خانہ خدا کی جگہ اور مدینہ منورہ رسول اللہ کا پا یہؔ تخت ہے مگر دمشق میں توکوئی ایسی خوبی کی بات نہیں جس کی وجہ سے تمام امکنہ متبرکہ چھوڑکر نزول کے لئے صرف دمشق کو مخصوص کیاجائے۔ اِس جگہ بلاشبہ استعارہ کے طور پر کوئی مرادی معنے مخفی ہیں جو ظاہر نہیں کئے گئے اور یہ عاجز ابھی اس بات کی تفتیش کی طرف متوجہ نہیں ہواتھا کہ وہ معنے کیا ہیں کہ اسی اثناء میں میرے ایک دوست
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 135
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 135
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/135/mode/1up
    تاکروڑ ہا آدمی ہلاکت سے بچ جاتے مگراُس نے ایسانہیں کیا کیونکہ اس کو ایک عقدہ درمیان میں رکھ کرصادقوں اور کاذبوں کا امتحان منظور تھااِسی بناپر اور اِسی مدعاکی غرض سے تمثیل کے پیرایہ میں یا استعارہ کےؔ طور پر بہت باتیں ہوتی ہیں جن پر نظر ڈالنے والے دوگروہ ہو جاتے ہیں ایک وہ گروہ جو فقط ظاہر پرست اور ظاہر بین ہوتاہے اور استعارات سے بکلی منکر ہو کر اُن پیشگوئیوں کے ظہور کو ظاہری صورت میں دیکھنا چاہتا ہے۔یہ وہ گروہ ہے کہ جو وقتؔ پر حقیقتِ حقّہ کے ماننے سے اکثر بے نصیب اور محروم رہ جاتا ہے بلکہ سخت درجہ کی عداوت اور
    بقیہ حاشیہ۔اور محب واثق مولوی حکیم نور الدین صاحب اس جگہ قادیان میں تشریف لائے اور انہوں نے اس بات کے لئے درخواست کی کہ جو مسلم کی حدیث میں لفظ دمشق و نیز اور ایسے چند مجمل الفاظ ہیں اُن کے انکشاف کے لئے جناب الٰہی میں توجہ کی جائے لیکن چونکہ ان دنوں میں میری طبیعت علیل اور دماغ ناقابل جدوجہد تھا اس لئے میں اُن تمام مقاصد کی طرف توجہ کرنے سےؔ مجبور رہا صرف تھوڑی سی توجہ کرنے سے ایک لفظ کی تشریح یعنی دمشق کے لفظ کی حقیقت میرے پرکھولی گئی اور نیز ایک صاف اور صریح کشف میں مجھ پر ظاہر کیاگیا کہ ایک شخص حارث نام یعنی حرّ اث آنے والا جو ابوداؤد کی کتاب میں لکھاہے یہ خبر صحیح ہے اور یہ پیشگوئی اور مسیح کے آنے کی پیشگوئی درحقیقت یہ دونوں اپنے مصداق کی رُو سے ایک ہی ہیں۔ یعنی ان دونوں کا مصداق ایک ہی شخص ہے جو یہ عاجز ہے۔
    سو اوّل میں دمشق کے لفظ کی تعبیر جو الہام کے ذریعہ سے مجھ پر کھولی گئی بیان کرتا ہوں پھر بعد اس کے ابو داؤد والی پیشگوئی جس طور سے مجھے سمجھا ئی گئی ہے بیان کروں گا۔
    پس واضح ہو کہ دمشق کے لفظ کی تعبیر میں میرے پر منجانب اللہ یہؔ ظاہر کیا گیا ہے کہ اس جگہ ایسے قصبہ کا نام دمشق رکھا گیا ہے جس میں ایسے لوگ رہتے ہیں جو یزیدی الطبع اور یزید پلید کی عادات اور خیالات کے پیرَو ہیں جن کے دلوں میں اللہ اور رسول کی کچھ محبت نہیں اور احکام الٰہی کی کچھ عظمت نہیں جنہوں نے اپنی نفسانی خواہشوں کو اپنا معبود بنا رکھا ہے اور اپنے نفس امّارہ کے حکموں کے ایسے مطیع ہیں کہ مقدسوں اور پاکوں کا خون بھی اُن کی نظر میں سہل اور آسان امر ہے اور آخرت پر ایمان نہیں رکھتے اور خدائے تعالیٰ کا موجود ہونا اُن کی نگاہ میں ایک پیچیدہ مسئلہ ہے جو انہیں سمجھ نہیں آتا اور چونکہ طبیب کو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 136
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 136
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/136/mode/1up
    بُغض اور کینہ تک نوبت پہنچتی ہے جس قدر دنیا میں ایسے نبی یا ایسے رسول آئے جن کی نسبت پہلی کتابوں میں پیشگوئیاں موجود تھیں اُن کے سختؔ منکر اور اشد دشمن وہی لوگ ہوئے ہیں کہ جو پیشگوئیوں کے الفاظ کو اُ ن کی ظاہری صورت پر دیکھنا چاہتے تھے۔مثلًا ایلیا نبی کا آسمان سے اُترنا اور خلق اللہ کی ہدایت کے لئے دنیا میں آنا بائیبل میں اس طرح پر لکھاہے کہ ایلیا نبی جو آسمان پر اُٹھایا گیا پھرؔ دوبارہ وہی نبی دنیا میںآئے گا۔اِن ظاہر الفاظ پر یہودیوں نے سخت پنجہ مارا ہوا ہے اور باوجودیکہ حضرت مسیح جیسے ایک بزرگوار نبی نے صاف صاف گواہی
    بقیہ حاشیہ۔بیماروں ہی کی طرف آنا چاہیئے اس لئے ضرور تھا کہ مسیح ایسے لوگوں میں ہی نازل ہو۔ غرض مجھ پر یہ ظاہر کیا گیا ہے کہ دمشق کے لفظ سے دراصل وہ مقام مراد ہے جسؔ میں یہ دمشق والی مشہور خاصیت پائی جاتی ہے اور خدائے تعالیٰ نے مسیح کے اُترنے کی جگہ جو دمشق کو بیان کیا تو یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ مسیح سے مراد وہ اصلی مسیح نہیں ہے جس پر انجیل نازل ہوئی تھی بلکہ مسلمانوں میں سے کوئی ایسا شخص مراد ہے جو اپنی روحانی حالت کی رو سے مسیح سے اور نیز امام حسین سے بھی مشابہت رکھتا ہے کیونکہ دمشق پایۂ تخت یزید ہوچکاہے اور یزیدیوں کا منصوبہ گاہ جس سے ہزارہا طرح کے ظالمانہ احکام نافذ ہوئے وہ دمشق ہی ہے اوریزیدیوں کو اُ ن یہودیوں سے بہت مشابہت ہے جو حضرت مسیح کے وقت میں تھے ایسا ہی حضرت امام حسین کو بھی اپنی مظلومانہ زندگی کی رو سے حضرت مسیح سے غایت درجہ کی مماثلت ہے پس مسیح کا دمشق میں اُترنا صافؔ دلالت کرتا ہے کہ کوئی مثیل مسیح جو حسین سے بھی بوجہ مشابہت ان دونوں بزرگوں کے مماثلت رکھتا ہے یزیدیوں کی تنبیہ اور ملزم کرنے کے لئے جو مثیل یہود ہیں اُترے گا اور ظاہر ہے کہ یزیدی الطبع لوگ یہودیوں سے مشابہت رکھتے ہیں۔ یہ نہیں کہ دراصل یہودی ہیں اس لئے دمشق کا لفظ صاف طور پر بیان کر رہا ہے کہ مسیح جو اُترنے والا ہے وہ بھی دراصل مسیح نہیں ہے بلکہ جیسا کہ یزیدی لوگ مثیل یہود ہیں ایساہی مسیح جو اُترنے والا ہے وہ بھی مثیل مسیح ہے اور حسینی الفطرت ہے یہ نکتہ ایک نہایت لطیف نکتہ ہے جس پر غور کرنے سے صاف طور پر کھل جاتا ہے کہ دمشق کا لفظ محض استعارہ کے طورپر استعمال کیاگیاہے۔ چونکہ امام حسین کامظلومانہ واقعہ خدائے تعالیٰ ؔ کی نظر میں بہت عظمت اور وقعت رکھتا ہے اور یہ واقعہ حضرت مسیح کے واقعہ سے ایسا ہمرنگ ہے کہ عیسائیوں کو بھی اس میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 137
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 137
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/137/mode/1up
    دی کہ وہ ایلیا جس کا آسمان سے اُترنا انتظارکیا جاتاہے یہی یحیٰ زکریا کا بیٹاہے کہ جو آپ کا مرشدؔ ہے لیکن یہودیوں نے قبول نہ کیا بلکہ انہی باتوں سے حضرت مسیح پر سخت ناراض ہو گئے اور حضرت مسیح کی نسبت یہ خیال کرنے لگے کہ وہ توریت کی عبارتوں کو اَور اَور معنے کر کے بگاڑنا چاہتاہے کیونکہ انہیں اپنے جسمانی خیال کی وجہ سے پختہ طوؔ ر پر امید لگی ہوئی تھی چنانچہ ابھی تک وہی خیال خام دل میں ہے کہ سچ مچ ایلیا یہودیوں کی جماعت کے سامنے آسمان سے اُترے گا اور فرشتے اُس کے دائیں بائیں اپنے ہاتھوں کا سہارادے کر بیت المقدس کی
    بقیہ حاشیہ۔کلام نہیں ہوگی اس لئے خدائے تعالیٰ نے چاہا کہ آنے والے زمانہ کو بھی اس کی عظمت سے اور مسیحی مشابہت سے متنبہ کرے اس وجہ سے دمشق کا لفظ بطور استعارہ لیا گیا تا پڑھنے والوں کی آنکھوں کے سامنے وہ زمانہ آجائے جس میں لخت جگر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم حضرت مسیح کی طرح کمال درجہ کے ظلم اور جور وجفا کی راہ سے دمشقی اشقیا کے محاصرہ میں آکر قتل کئے گئے۔ سو خدائے تعالیٰ نے اس دمشق کو جس سے ایسے پُر ظلم احکام نکلتے تھے اور جس میں ایسے سنگدل اور سیاہ درون لوگ پیدا ہوگئے تھے اس غرض سے نشانہ بنا کر لکھا کہ اب مثیل دمشق عدل اور ایمان پھیلانے کا ہیڈؔ کوارٹر ہوگا۔ کیونکہ اکثر نبی ظالموں کی بستی میں ہی آتے رہے ہیں اور خدا تعالیٰ *** کی جگہوں کو برکت کے مکانات بناتا رہا ہے اس استعارہ کو خدائے تعالیٰ نے اس لئے اختیار کیا کہ تا پڑھنے والے دو فائدے اس سے حاصل کریں ایک یہ کہ امام مظلوم حسین رضی اللہ عنہ کا دردناک واقعۂ شہادت جس کی دمشق کے لفظ میں بطورپیشگوئی اشارہ کی طرز پر حدیث نبوی میں خبر دی گئی ہے اس کی عظمت اور وقعت دلوں پر کھل جائے۔ دوسرے یہ کہ تا یقینی طور پر معلوم کرجاویں کہ جیسے دمشق میں رہنے والے دراصل یہودی نہیں تھے مگر یہودیوں کے کا م انہوں نے کئے ایسا ہی جو مسیح اُترنے والا ہے دراصل مسیح نہیں ہے مگر مسیح کی روحانی حالت کا مثیل ہے اور اس جگہ بغیر اس شخص کے کہ جس کے د ل میں واقعہ حسین کی وہ عظمت نہ ؔ ہو جو ہونی چاہیئے ہریک شخص اس دمشقی خصوصیت کو جو ہم نے بیان کی ہے بکمال انشراح ضرور قبول کرلے گا اور نہ صرف قبول بلکہ اس مضمون پر نظر امعان کرنے سے گویا حق الیقین تک پہنچ جائے گا اور حضرت مسیح کو جو امام حسین رضی اللہ عنہ سے تشبیہ دی گئی ہے یہ بھی استعارہ در استعارہ ہے جس کو ہم آگے چل کر بیان کریں گے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 138
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 138
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/138/mode/1up
    کسی اُونچی عمارت پر آکر اُتاردیں گے پھرکسی زینہ کے ذریعہ سے حضر ت ایلیاؔ نیچے اُتر آئیں گے اور یہودیوں کے تمام مخالفوں کو روئے زمین سے نابود کر ڈالیں گے اور چونکہ اُن کی کتابوں میں جوکتب الہامیہ ہیں یہ بھی لکھا ہے کہ ضرور ہے کہ مسیح کے آنے سے پہلے ایلیا آسمان سے اُترے اِسی دِقّت کی وجہ سے یعنی اِس سبب سے کہ ایلیا اُن کے گمان میں اب تک آسماؔ ن سے نہیں اُترا مسیح ابن مریم پر وہ ایمان نہیں لائے اور صاف کہہ دیا کہ ہم نہیں جانتے کہ تو کون ہے کیونکہ وہ مسیح جس کی ہمیں انتظار ہے ضرور ہے کہ اُس سے پہلے ایلیا آسمان سے اُتر کر اُس کی راہوں کو
    بقیہ حاشیہ۔اب پہلے ہم یہ بیان کرنا چاہتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے مجھ پر یہ ظاہر فرمادیاہے کہ یہ قصبہ قادیان بوجہ اس کے کہ اکثر یزیدی الطبع لوگ اس میں سکونت رکھتے ہیں دمشق سے ایک مناسبت اور مشابہت رکھتا ہے اور یہ ظاہر ہے کہ تشبیہات میں پور ی پوری تطبیق کی ضرور ت نہیں ہوتی بلکہ بسا اوقات ایک ادنیٰ مماثلت کی وجہ سے بلکہ صرف ایک جزو میں مشارکت کے باعث ؔ سے ایک چیز کانام دوسری چیز پر اطلاق کر دیتے ہیں مثلًا ایک بہادر انسان کو کہہ دیتے ہیں کہ یہ شیر ہے اور شیر نام رکھتے ہیں یہ ضروری نہیں سمجھاجاتا کہ شیر کی طرح اس کے پنجے ہوں اور ایسی ہی بدن پر پشم ہو اور ایک دُم بھی ہو بلکہ صرف صفت شجاعت کے لحاظ سے ایسا اطلاق ہوجاتا ہے اور عام طور پر جمیع انواع استعارات میں یہی قاعدہ ہے سو خدائے تعالیٰ نے اسی عام قاعدہ کے موافق اس قصبہ قادیان کو دمشق سے مشابہت دی اور اس بارہ میں قادیان کی نسبت مجھے یہ بھی الہام ہوا کہ اخرج منہ الیزیدیون یعنی اس میں یزیدی لوگ پیداکئے گئے ہیں۔ اب اگرچہ میرا یہ دعویٰ تو نہیں اور نہ ایسی کامل تصریح سے خدائے تعالیٰ نے میرے پر کھول دیا ہے کہ دمشق میں کوئی مثیل مسیح پیدا نہیں ہو گا بلکہ میرے نزدیک ممکن ہے کہ کسی ؔ آئندہ زمانہ میں خاص کر دمشق میں بھی کوئی مثیل مسیح پیدا ہوجائے مگر خدائے تعالیٰ خوب جانتا ہے اور وہ اس بات کا شاہد حا ل ہے کہ اس نے قادیان کو دمشق سے مشابہت دی ہے اور ان لوگوں کی نسبت یہ فرمایا ہے کہ یہ یزیدی الطبع ہیں یعنی اکثر وہ لوگ جو اس جگہ رہتے ہیں وہ اپنی فطرت میںیزیدی لوگوں کی فطرت سے مشابہ ہیں اور یہ بھی مدّت سے الہام ہو چکا ہے کہ انا انزلناہ قریبًا من القادیان وبالحق انزلناہ وبالحق نزل وکان وعداللّٰہ مفعولًا یعنی ہم نے اُس کو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 139
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 139
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/139/mode/1up
    درست کرے۔اس کے جواب میں ہر چند حضرت مسیح نے بہت زور دے کر انہیں کہا کہ وہ ایلیاؔ جو آنے والا تھا یہی یحیٰی زکریاکا بیٹا ہے جس کو تم نے شناخت نہیں کیا لیکن یہودیوں نے مسیح کے اس قول کو ہرگز قبول نہیں کیا بلکہ خیال کیا کہ یہ شخص توریت کی پیشگوئیو ں میں الحاد اور تحریف کر رہاہے اور اپنے مرشد کو ایک عظمت دینے کے لئے ظاہری معنے کو کھینچ تان کر کچھ کا کچھ ؔ بنا رہا ہے سو ظاہر پرستی کی شامت نے یہودیوں کو حقیقت فہمی سے محروم رکھا اور مجرّد الفاظ پر زور مارنے اور استعارہ کو حقیقت سمجھنے کی وجہ سے ابدی لعنتوں کا ذخیرہ انہیں ملا
    بقیہ حاشیہ۔قادیان کے قریب اتارا ہے اور سچائی کے ساتھ اُتارا اور سچائی کے ساتھ اُترا اور ایک دن وعدہ اللہ کاپور ا ہونا تھا۔ اس الہام پر نظرغور کرنے سے ظاہر ہوتا ہے کہ قادیان میں خدائے تعالیٰ کی طرف سے اس عاجز کا ظاہر ہونا الہامی نوشتوں میں بطور پیشگوئی کے پہلے سے لکھاگیا تھا۔ اب چونکہؔ قادیان کو اپنی ایک خاصیت کی رُو سے دمشق سے مشابہت دی گئی تو اس سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ قادیان کا نام پہلے نوشتوں میں استعارہ کے طورپر دمشق رکھ کرپیشگوئی بیان کی گئی ہو گی کیونکہ کسی کتاب حدیث یاقرآن شریف میں قادیان کا نام لکھاہوانہیں پایاجاتا اور یہ الہام جو بَراہین احمدیہ میں بھی چھپ چکا ہے بصراحت وبآواز بلندظاہرکر رہا ہے کہ قادیان کانام قرآن شریف میں یا احادیث نبویہ میں بمدپیشگوئی ضرور موجود ہے اور چونکہ موجود نہیں تو بجز اس کے اَور کس طرف خیال جاسکتا ہے کہ خدائے تعالیٰ نے قادیان کا نام قرآن شریف یا احادیث نبویہ میں کسی اور پیرایہ میں ضرور لکھا ہوگا اور اب جو ایک نئے الہام سے یہ بات بپایۂ ثبوت پہنچ گئی کہ قادیان کو خدائے تعالیٰ کے نزدیک دمشق سے مشابہت ہے تو اُس پہلے الہام کے معنے بھی اس سے کھل ؔ گئے گویا یہ فقرہ جو اللہ جلّشانُہ‘ نے الہام کے طور پر اس عاجز کے دل پر القاکیاہے کہ انا انزلناہ قریبًا من القادیان اس کی تفسیریہ ہے کہ انا انزلناہ قریبا من دمشق بطرف شرقی عند المنارۃ البیضاء۔ کیونکہ اس عاجز کی سکونتی جگہ قادیان کے شرقی کنارہ پر ہے منارہ کے پاس۔ پس یہ فقرہ الہام الٰہی کا کہ کان وعد اللّٰہ مفعولًا اس تاویل سے پوری پوری تطبیق کھاکر یہ پیشگوئی واقعی طورپر پوری ہوجاتی ہے اس عبارت تک یہ عاجز پہنچا تھا کہ یہ الہام ہؤاقل لو کان الامر من عند غیر اللّٰہ لوجدتم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 140
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 140
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/140/mode/1up
    حالانکہ وہ بجائے خود اپنے تئیں معذور سمجھتے تھے کیونکہ اُن کی بائبل کے ظاہری الفاظ پر نظر تھی۔ افسو سؔ کہ ہمارے مسلمان بھائی بھی اسی گرداب میں پڑے ہوئے ہیں اور حضرت مسیح کی نسبت یہودیوں کی طرح اُن کے دلوں میں بھی یہی خیال جماہوا ہے کہ ہم اُنہیں سچ مچ آسمان سے اُترتے دیکھیں گے اور یہ اعجوبہ ہم بچشم خود دیکھیں گے کہ حضرت مسیح زردرنگ کی پوشاک پہنے ہوئے آسمانؔ سے اُترتے چلے آتے ہیں اور دائیں بائیں فرشتے اُن کے ساتھ ہیں اور تمام بازاری لوگ اور دیہات کے آدمی ایک بڑے میلہ کی طرح اکٹھے ہو کر دُور سے اُ ن کو دیکھ رہے ہیں اور
    بقیہ حاشیہ۔ فیہ اختلافًا کثیرًا۔ قل لو اتبع اللّٰہ اھواء کم لفسدت السمٰوات والارض ومن فیھن ولبطلت حکمتہ وکان اللّٰہ عزیزًاحکیمًا۔ قل لو کان البحر مدادًا لکلمات ربی لنفد البحر قبل ان تنفد کلمات ربی ولو جئنا بمثلہٖ مددًا۔ قلؔ ان کنتم تحبون اللّٰہ فاتبعونی یحببکم اللّٰہ وکان اللّٰہ غفورا رحیما۔پھر اس کے بعد الہام کیاگیا کہ ان علما ء نے میرے گھر کو بدل ڈالا۔ میری عبادت گاہ میں ان کے چولہے ہیں میری پرستش کی جگہ میں اُن کے پیالے اور ٹھوٹھیاں رکھی ہوئی ہیں اور چوہوں کی طرح میرے نبی کی حدیثوں کو کتر رہے ہیں (ٹھوٹھیاں وہ چھوٹی پیالیاں ہیں جن کو ہندوستان میں سکوریاں کہتے ہیں۔ عبادت گاہ سے مراد اس الہام میں زمانہ حال کے اکثر مولویوں کے دل ہیں جو دنیا سے بھرے ہوئے ہیں )۔ اس جگہ مجھے یاد آیا کہ جس روز وہ الہام مذکور ہ بالا جس میں قادیان میں نازل ہونے کا ذکر ہواتھا اس روز کشفی طورپر میں نے دیکھا کہ میرے بھائی صاحب مرحوم مرزا غلام قادر میرے قریب بیٹھ کر بآواز بلند قرآن شریف پڑھ رہے ہیں اور پڑھتے پڑھتے انہوں نے اِنؔ فقرات کوپڑھا کہ انا انزلنٰہ قریبًا من القادیان تو میں نے سُنکر بہت تعجب کیا کہ کیاقادیان کا نام بھی قرآن شریف میں لکھا ہوا ہے؟ تب انہوں نے کہا کہ یہ دیکھو لکھاہوا ہے تب مَیں نے نظر ڈال کر جو دیکھا تو معلوم ہوا کہ فی الحقیقت قرآن شریف کے دائیں صفحہ میں شاید قریب نصف کے موقع پر یہی الہامی عبارت لکھی ہوئی موجود ہے تب میں نے اپنے دل میں کہا کہ ہاں واقعی طورپر قادیان کانام قرآن شریف میں درج ہے اور میں نے کہا کہ تین شہروں کا نام اعزاز کے ساتھ قرآن شریف میں درج کیاگیاہے مکہ اورمدینہ اور قادیان یہ کشف تھا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 141
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 141
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/141/mode/1up
    چھوٹے بڑے چلا چلا کر کہہ رہے ہیں کہ وہ آئے وہ آئے یہاں تک کہ دمشق کے شرقی منارہ پر اُتر آئے اور بذرؔ یعہ زینہ کے نیچے اتارے گئے اور ایک دوسرے سے سلام علیک اور مزاج پُرسی ہوئی۔تعجب کہ یہ لوگ خیال نہیں کرتے کہ دنیا میں کہ ایک دارالابتلاجگہ ہے ایسے معجزات ظہور پذیر ہرگز نہیں ہوتے ورنہ دعوت اسلام ایمان بالغیب کی حد سے باہر ہو جائے۔ہم پہلے اس سے لکھ چکے ہیں کہ کفار مکّہ نے اسی قسم کا کوئی معجزہ ہمارے سید و مولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم افضل الرسل سے بھی مانگا تھا جن کو صاف یہ جواب دیا گیا کہ ایسا ہونا سنت اللہ سے باہر ہے
    بقیہ حاشیہ۔ جو کئی سال ہوئے کہ مجھے دکھلایاگیا تھا اور اس کشف میں جو میں نے اپنے بھائی صاحب مرحوم کو جوکئی سال سے وفات پا چکے ہیں قرآن شریف پڑھتے دیکھا اور اس الہامی فقرہ کو ان کی زبان سے قرآن شریف میں پڑھتے سُنا تو اس میں یہ ؔ بھید مخفی ہے جس کو خدائے تعالیٰ نے میرے پر کھول دیا کہ اُن کے نام سے اس کشف کی تعبیر کو بہت کچھ تعلق ہے یعنی اُن کے نام میں جو قادر کا لفظ آتا ہے اس لفظ کو کشفی طور پر پیش کر کے یہ اشارہ کیا گیا ہے کہ یہ قادر مطلق کاکام ہے اس سے کچھ تعجب نہیں کرنا چاہیئے اس کے عجائبات قدرت اسی طرح پر ہمیشہ ظہور فرما ہوتے ہیں کہ وہ غریبوں اور حقیروں کو عزت بخشتا ہے اور بڑے بڑے معززوں اور بلند مرتبہ لوگوں کو خاک میں ملا دیتا ہے۔ بڑے بڑے علماء وفضلاء اس کے آستانہ فیض سے بکلّی بے نصیب اور محروم رہ جاتے ہیں اور ایک ذلیل حقیر اُمّی جاہل نالائق منتخب ہو کرمقبولین کی جماعت میں داخل کرلیاجاتاہے۔ہمیشہ سے اس کی کچھ ایسی ہی عادت ہے اور قدیم سے وہ ایسا ہی کرتا چلا آیا ہے۔ وذالک فضل اللّٰہ یؤتیہ من یشآء۔
    ابؔ میں وہ حدیث جو ابوداؤد نے اپنی صحیح میں لکھی ہے ناظرین کے سامنے پیش کر کے اس کے مصداق کی طرف ان کو توجہ دلاتا ہوں۔ سو واضح ہو کہ یہ پیشگوئی جو ابوداؤد کی صحیح میں درج ہے کہ ایک شخص حارث نام یعنی حرّ اث ماوراء النہر سے یعنی سمر قند کی طرف سے نکلے گا جو آل رسول کو تقویت دے گا جس کی امداد اور نصرت ہریک مومن پر واجب ہوگی۔ الہامی طورپر مجھ پر ظاہر کیا گیا ہے کہ یہ پیشگوئی اور مسیح کے آنے کی پیشگوئی جو مسلمانوں کا امام اور مسلمانوں میں سے ہو گا۔ دراصل یہ دونوں پیشگوئیاں متحد المضمون ہیں اور دونوں کا مصداق یہی عاجز ہے۔ مسیح کے نام پر جو پیشگوئی ہے اس کی علامات خاصہ درحقیقت دو ہی ہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 142
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 142
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/142/mode/1up
    افسوس کہ ہماری قوم کے لوگ استعارات کو حقیقت پرحمل کر کے سخت پیچوں میں پھنس گئے ہیں اور ایسی مشکلات کا سامنااُنہیںؔ پیش آگیا ہے کہ اب اُن سے بآسانی نکلنا ان لوگوں کے لئے سخت دشوار ہے اور جو نکلنے کی راہیں ہیں وہ اُنہیں قبول نہیں کرتے۔مثلًا صحیح مسلم کی حدیث میں جو یہ لفظ موجود ہے کہ حضرت مسیح جب آسمان سے اُتریں گے تو اُن کا لباس زردرنگ کا ہو گا۔ اس لفظ کو ظاہری لباس پر حمل کرنا کیسا لغو خیال ہے زرد رنگ پہننے کی کوئی وجہ معلوم نہیں ہوتی لیکن اگر اس لفظ کو ایک کشفی استعارہ قرار دے کر معبرین کے مذاق اورتجارب کے موافق اس کی تعبیر کرنا چاہیں
    بقیہ حاشیہ۔ ایک یہ کہ جب وہ مسیح آئے گا تو مسلمانوں کی اندرونی حالت کو جواُس وقت بغایت درجہ بگڑی ہوئی ہو گی اپنی صحیح تعلیم سےؔ درست کر دے گا اور اُن کے روحانی افلاس اور باطنی ناداری کو بکلی دور فرما کر جواہراتِ علوم وحقائق ومعارف اُن کے سامنے رکھ دے گا یہاں تک کہ وہ لوگ اس دولت کو لیتے لیتے تھک جائیں گے اوراُن میں سے کوئی طالب حق روحانی طور پر مفلس اور نادار نہیں رہے گا بلکہ جس قدر سچائی کے بھوکے اور پیاسے ہیں ان کو بکثرت طیب غذا صداقت کی اور شربت شیریں معرفت کا پلایا جائے گا اور علوم حقّہ کے موتیوں سے اُن کی جھولیاں پُر کر دی جائیں گی اور جو مغز اور لبِ ُ لباب قرآن شریف کا ہے اسؔ عطر کے بھرے ہوئے شیشے اُن کو دئے جائیں گے۔
    دوسری علامت خاصہ یہ ہے کہ جب وہ مسیح موعود آئے گا تو صلیب کو توڑے گا اور خنزیروں کو قتل کرے گا اور دجّال یک چشم کو قتل کر ڈالے گا اور جس کافر تک اس کے دم کی ہوا پہنچے گی وہ فی الفور مر جائے گا سو اس علامت کی اصل حقیقت جو روحانی طور پر رکھی گئی ہے یہ ہے کہ مسیح دنیا میں آکر صلیبی مذہب کی شان وشوکت کو اپنے پیروں کے نیچے کچل ڈالے گا اور اُن لوگوں کو جن میں خنزیروں کی بے حیائی اور خوکوں کیؔ بے شرمی اور نجاست خواری ہے اُ ن پر دلائل قاطعہ کا ہتھیار چلاکر ان سب کا کام تمام کرے گا اوروہ لوگ جو صرف دنیا کی آنکھ رکھتے ہیں مگردین کی آنکھ بکلّی ندارد بلکہ ایک بدنما ٹینٹ اس میں نکلا ہوا ہے انکو بیّن حجتوں کی سیف قاطعہ سے ملزم کر کے اُن کی منکرانہ ہستی کا خاتمہ کر دے گا اور نہ صرف ایسے یک چشم لوگ بلکہ ہرایک کافر جو دینِ محمدؐی کو بنظر استحقار دیکھتا ہے مسیحی دلائل کے جلالی دم سے روحانی طور پر ماراجائے گا۔ غرض یہ سب عبارتیں استعارہ کے طور پر واقع ہیں جو اس عاجز پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 143
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 143
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/143/mode/1up
    تو یہ معقول تعبیر ہو گی کہ حضرت مسیح اپنے ظہور کے وقت یعنی اس وقت میں کہ جب وہ مسیح ہونے کا دعویٰ کریں گے کسی قدر بیمار ہو ں گے اور حالت صحت اچھی نہیں رکھتے ہوں گے کیونکہ کتبِ تعبیر کی رو سے زردرنگ پوشاک پہننے کی یہی تاوؔ یل ہے اور ظاہرہے کہ یہی تاویل عالم کشف اور رؤیا کی نہایت مناسب حال اور سراسر معقول اور قریب قیاس ہے کیونکہ تعبیر کی کتابوں میں صاف لکھاہے کہ اگر کسی شخص کی عالم رؤیا یا عالم کشف میں زرد رنگ کی پوشاک دیکھی جائے تو اس کی یہ تعبیر کرنی چاہیئے کہ وہ شخص بیمار ہے یا بیمار ہونے والا ہے کاش اگر اس محققانہ مذاق
    بقیہ حاشیہ۔ بخوبی کھولی گئی ؔ ہیں اب چاہے کوئی اس کو سمجھے یا نہ سمجھے لیکن آخر کچھ مدّت اَور انتظارکرکے اور اپنی بے بنیاد امیدوں سے یاس کلّی کی حالت میں ہو کر ایک دن سب لوگ اس طرف رجوع کریں گے۔ اِس وقت ان مسیحی علامات کو لکھتے لکھتے مجھے ایک رؤیا صالحہ اپنی یاد آگئی ہے اور بامذاق لوگوں کے مسرور الوقت کرنے کے لئے اُس کو میں اِس جگہ لکھتاہوں:۔
    ایک بزرگ غایت درجہ کے صالح جومردان خدا میں سے تھے اور مکالمہ الہٰیّہ کے شرف سے بھیؔ مشرّف تھے اور بمرتبہ کمال اتباع سُنّت کرنے والے اور تقویٰ اور طہارت کے جمیع مراتب اور مدارج کو ملحوظ اور مرعی رکھنے والے تھے اور اُن صادقوں اور راستبازوں میں سے تھے جن کو خدائے تعالیٰ نے اپنی طرف کھینچاہواہوتا ہے اور ؔ پرلے درجہ کے معمور الاوقات اور یاد الٰہی میں محو اور غریق اور اسی راہ میں کھوئے گئے تھے جن کانام نامی عبد اللہ غزنوی تھا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 144
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 144
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/144/mode/1up
    کے موافق ہمارے مفسّر اور محدّث اس فقرہ کی یہی تاویل کرتے یعنی یہ کہتے کہ جب مسیح ظہور فرما کر اپنا مسیح موعود ہونا خلق اللہ پر ظاہر کرے گاتو اُس وقت اس کی صحت کی حالت اچھی نہیں ہو گی بلکہ ضرور کسی قسم کی علالت جسمانی اور ضعف بدنی اس کے شامل حال ہو گا جو اسؔ کے ظہورکے لئے ایک خاص وردی کی طرح ایک علامت اور نشانی ہو گی تو ایسی تاویل کیا عمدہ اور لطیف اور سراسر راستی پر مبنی ہو تی لیکن افسوس کہ ہمارے علماء نے ایسا نہیں کیا بلکہ وہ تو اپنی نہایت سادگی اور خام خیالی کی وجہ سے بعینہٖ یہودیوں کی طرح انتظار کر رہے ہیں کہ سچ مچ مسیح
    بقیہ حاشیہ۔ ایک دفعہ میں نے اُس بزرگ با صفا کو خواب میں اُن کی وفات کے بعد دیکھا کہ سپاہیوں کی صورت پر بڑی عظمت اور شان کے ساتھ بڑے پہلواؔ نوں کی مانند مسلّح ہونے کی حالت میں کھڑے ہیں تب میں نے کچھ اپنے الہامات کا ذکر کر کے اُن سے پوچھا کہ مجھے ایک خواب آئی ہے اس کی تعبیر فرمائیے۔ مَیں نے خواب میں یہ دیکھا ہے کہ ایک تلوار میرے ہاتھ میں ہے جس کا قبضہ میرے پنجہ میں اور نوک آسمان تک پہنچی ہوئی ہےؔ جب میں اس کو دائیں طرف چلاتا ہوں تو ہزاروں مخالف اس سے قتل ہوجاتے ہیں اور جب بائیں طرف چلاتا ہوں تو ہزارہا دشمن اس سے مارے جاتے ہیں تب حضرت عبد اللہ صاحب مرحوم رضی اللہ تعالیٰ عنہ اس میری
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 145
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 145
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/145/mode/1up
    جب آسمان سے اُترے گاتو ایک زرد رنگ کی پوشاک زعفران کے رنگ سے رنگین کی ہوئی اس کے زیب تن ہو گی۔کاش اگر علماء کو کبھی ایسی خواب بھی آئی ہوتی کہ انہوں نے زرد رنگ کے کپڑے پہنے ہوئے ہیں اور پھر اس کے بعد بیمار بھی ہو جاتے تو آج اُن کی نگاہ میں ہماری یہ باتیں قابلؔ قدر ٹھہرتیں لیکن مشکل تو یہ ہے کہ روحانی کوچہ میں اُن کو دخل ہی نہیں یہودیوں کے علماء کی طرح ہریک بات کو جسمانی قالب میں ڈھالتے چلے جاتے ہیں لیکن ایک دُوسرا گروہ بھی ہے جن کو خدائے تعالیٰ نے یہ بصیرت اور فراست عطاکی ہے کہ وہ آسمانی باتوں کو آسمانی قانون کے موافق سمجھنا چاہتے ہیں اور استعارات اور مجازات کے قائل ہیں
    بقیہ حاشیہ۔ خواب کو سُنکر بہت خوش ہوئے او ربشاشت اورؔ انبساط اور انشراح صدر کے علامات وامارات اُن کے چہرہ میں نمودار ہوگئے اور فرمانے لگے کہ اس کی تعبیر یہ ہے کہ خدائے تعالیٰ آپ سے بڑے بڑے کام لے گا اور یہ جو دیکھا کہ دائیں طرف تلوار چلا کر مخالفوں کو قتل کیاجاتاہے اس سے مراد وہ اتمام حجت کاکام ہے کہ جو روحاؔ نی طور پر انوار وبرکات کے ذریعہ سے انجام پذیر ہوگا اور یہ جو دیکھا کہ بائیں طرف تلوار چلا کر ہزارہا دشمنوں کو مارا جاتا ہے اس سے مراد یہ ہے کہ آپ کے ذریعہ سے عقلی طور پر خدائے تعالیٰ الزام واسکات خصم کرے گا اور دنیا پر دونوں طور سےؔ اپنی حجت پوری کر دے گا۔پھر بعد اس کے انہوں نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 146
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 146
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/146/mode/1up
    مگر افسوس کہ وہ لوگ بہت تھوڑے ہیں اور اکثر یہی جنس ہماری قوم میں بکثرت پھیلی ہو ئی ہے کہ جو جسمانی خیالات پر گرے جاتے ہیں نہیں سمجھتے کہ خدائے تعالیٰ کا عام قانونِ قدرت جو اس کی وحی اور اس کے مکاشفات کےؔ متعلق ہے صریح صریح اُن کے زعم کے مخالف شہادت دے رہا ہے صدہا مرتبہ خوابوں میں مشاہدہ ہوتا ہے کہ ایک چیز نظر آتی ہے اور دراصل اُس سے مراد کوئی دوسری چیز ہوتی ہے۔ایک شخص کو انسان خواب میں دیکھتاہے کہ وہ آگیا اور پھر صبح اس کا کوئی ہمرنگ آجاتا ہے۔انبیاء کی کلام میں تمثیل کے ساتھ یا استعارہ کے طور پر بہت باتیں ہوتی ہیں دیکھو ہمارے سید و مولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی ازواج مطہرات اُمّہات المومنین کو فرمایاؔ تھاکہ تم میں سے پہلے اس کی وفات ہو گی جس کے ہاتھ لمبے ہوں گے
    بقیہ حاشیہ۔ فرمایا کہ جب مَیں دنیا میں تھا تو میں اُمیدوار تھا کہ خدائے تعالیٰ ضرور کوئی ایسا آدمی پیدا کرے گا پھر حضرت عبد اللہ صاحب مرحوم مجھ کو ایک وسیع مکان کی طرف لے گئے جس میں ایک جماعت راستبازوں اور کامل لوگوںؔ کی بیٹھی ہوئی تھی لیکن سب کے سب مسلّح اور سپاہیانہ صورت میں ایسی چستی کی طرز سے بیٹھے ہوئے معلوم ہوتے تھے کہ گویا کوئی جنگی خدمت بجالانے کے لئے کسی ایسے حکم کے منتظر بیٹھے ہیں جو بہت جلد آنے والا ہے پھر اس کے بعد آنکھ کھل گئی۔
    یہ رویا صالحہ جو درحقیقت ایک کشف کی قسمؔ ہے استعارہ کے طور پر انہیں علامات پر دلالت کر رہے ہیں جو مسیح کی نسبت ہم ابھی بیان کر آئے ہیں یعنی مسیح کا خنزیروں کو قتل کرنا اور علی العموم تمام کفار کو مارنا انہیں معنوں کی رو سے ہے کہ وہ حجت الہی اُن پر پور ی کر ے گا اور بیّنہ کی تلوار سے اُن کو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 147
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 147
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/147/mode/1up
    اور ان تمام اہل بیت کو اس حدیث کے سُننے سے یہی یقین ہو گیا تھا کہ درحقیقت لمبے ہاتھوں سے اُن کا لمباہونا ہی مراد ہے یہاں تک کہ آنجناب کی ان پاک دامن بیویوں نے باہم ہاتھ ناپنے شروع کئے لیکن جب سب سے پہلے زینب رضی اللہ عنہا نے وفات پائی تب انہیں سمجھ آیا کہ لمبے ہاتھوں سے ایثار اور سخاوت کی صفت مرادہے جو زینب رضیؔ اللہ عنہا پر سب کی نسبت زیادہ غالب تھی۔
    اور یہ خیال کہ تناسخ کے طور پر حضرت مسیح بن مریم دنیا میں آئیں گے سب سے زیاد ہ ردّی اور شرم کے لائق ہے تناسخ کے ماننے والے تو ایسے شخص کا دنیا میں دوبارہ آنا تجویز کرتے ہیں جس کے تزکیہ نفس میں کچھ کسر رہ گئی ہو لیکن جو لوگ بکلّی مراحل کمالات طے کرکے اس دنیاسے سفر کرتے ہیں وہ بزعم اُن کے ایک مدت دراز کے لئے مکتی خانہ میں دا خلؔ کئے جاتے ہیں۔
    بقیہ حاشیہ۔ قتل کر دے گا وَاللّٰہ اَعْلَمُ بالصواب۔ اور حارث کے نامؔ پر جو پیشگوئی ہے اُس کی علامات خاصہ پانچ بیان کی گئی ہیں۔پہلی یہ کہ وہ نہ سیف کے ساتھ نہ سنان کے ساتھ بلکہ اپنی قوت ایمان کے ساتھ اور اپنے نور عرفان اور برکات بیان کے ساتھ حق کے طالبوں اور سچائی کے بھوکوں پیاسوں کو تقویت دے گا اور اپنی مخلصانہ شجاعت اور مومنانہ شہادتوں کی وجہ سے اُن کے قدم کو استوار کردے گا اسی کے موافق جو مومنین قریش نے مکہ معظمہ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی صداقت کو قبول کر کے اور اپنے سارے زور اور سارے اخلاص اور کامل ایمان کے آثار دکھلانے سے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے بازوئے دعوت کو قوت دیدی تھی اور اسلام کے پَیروں کو مکہ معظمہ میں جما دیا تھا۔
    دوسرؔ ی علامت یہ کہ وہ حارث اور وراء النہر میں سے ہو گا جس سے مطلب یہ ہے کہ سمر قندی یا بخاری الاصل ہوگا۔
    تیسری علامت یہ ہے کہ وہ زمینداری کے ممیّز خاندان میں سے اور کھیتی کرنے والا ہوگا۔ چوتھی علامت یہ ہے کہ وہ ایسے وقت میں ظاہر ہوگا کہ جس وقت میں آل محمد یعنی اتقیائے مسلمین جو سادات قوم وشرفائے ملّت ہیں کسی حامی دین اور مبارز میدان کے محتاج ہونگے۔ آل محمد کے لفظ میں ایک افضل اور طیب جزو کو ذکر کر کے کل افراد جو پاکیزگی اور طہارت میں اس جزو سے مناسبت رکھتے ہیں اسی کے اندر داخل کئے گئے ہیں۔ جیساکہ یہ عام طریقہ متکلّمین ہے کہ بعض اوقات ایک جزوکو ذکرکر کے کل اُس سے مراد لیاجاتاہے۔
    پانچوؔ یں علامت اس حارث کی یہ ہے کہ امیروں اور بادشاہوں اور باجمعیت لوگوں کی صورت پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 148
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 148
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/148/mode/1up
    ماسوائے اس کے ہمارے عقید ہ کے موافق خدائے تعالیٰ کا بہشتیوں کے لئے یہ وعدہ ہے کہ وہ کبھی اس سے نکالے نہیں جائیں گے پھر تعجب کہ ہمارے علماء کیوں حضرت مسیح کو اس فردوسِ بریں سے نکالنا چاہتے ہیںآپ ہی یہ قصے سُناتے ہیں کہ حضرت ادریس جب فرشتہ ملک الموت سے اجازت لے کر بہشت میں داخل ہوئے تو ملک الموت نے چاہا کہ پھر باہر آویں لیکن حضرت ادرؔ یس نے باہر آنے سے انکار کیا اور یہ آیت سنادی وَ33 ۱؂ اب میں پوچھتا ہوں کہ کیا حضر ت مسیح اس آیت سے فائدہ حاصل کرنے کے مستحق نہیں ہیں کیا یہ آیت اُ ن کے حق میں منسوخ کا حکم رکھتی ہے اور اگر یہ کہا جائے کہ وہ اس لئے اس تنزّل کی حالت میں بھیجے جائیں گے کہ بعض لوگوں نے انہیں ناحق خدا بنایا تھا تو یہ اُن کا
    بقیہ حاشیہ۔ ظاہر نہیں ہو گا بلکہ اس اعلیٰ درجہ کے کام کی انجام دہی کے لئے اپنی قوم کی امداد کا محتاج ہو گا۔
    اب اوّل ہم ابو داؤد کی حدیث کو اس کے اصل الفاظ میں بیان کر کے پھر جس قدر مناسب اور کافی ہو اپنی نسبت اس کا ثبوت پیش کریں گے سو واضح ہو کہ حدیث یہ ہے عن علی قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یخرج رجل من ورآ ء النھر یقال لہ الحارث حرّاث علیٰ مقدمتہ رجل یقال لہ‘ منصور یُوطن او یمکّن لاٰل محمد کما مکّنت قریش لرسول اللّٰہ صلعم وجبؔ علیٰ کلّ مؤمن نصرہٗ او قال اجابتہ‘ یعنی روایت ہے علی کرم اللہ وجہہ‘ سے کہ کہا فرمایا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کہ ایک شخص پیچھے نہر کے سے نکلے گا یعنی بخارا یا سمر قند اس کا اصل وطن ہو گا اور وہ حارث کے نام سے پکارا جاوے گا یعنی باعتبار اپنے آباو اجداد کے پیشہ کے افواہ عام میں یا اس گورنمنٹ کی نظر میں حارث یعنی ایک زمیندار کہلائے گا پھر آگے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ کیوں حارث کہلائے گا اس وجہ سے کہ وہ حرّ اث ہوگا یعنی ممیّز زمینداروں میں سے ہوگا اور کھیتی کرنے والوں میں سے ایک معزز خاندان کا آدمی شمار کیاجاوے گا۔ پھر اس کے بعد فرمایا کہ اس کے لشکر یعنی اس کی جماعت کا سردار وسرگروہ ایکؔ توفیق یافتہ شخص ہو گا جس کو آسمان پر منصور کے نام سے پکاراجاوے گا کیونکہ خدائے تعالیٰ اس کے خادمانہ ارادوں کا جو اس کے دل میں ہوں گے آپ ناصر ہوگا۔ اس جگہ اگرچہ اُس منصور کو سپہ سالار کے طور پر بیان کیا ہے مگر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 149
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 149
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/149/mode/1up
    قصور نہیں ہے
    لَا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِّزْرَ اُخْرٰى ۱؂ ماسوائے اس کے یہ بات بھی نہایت غورؔ کے قابل ہے کہ یہ خیال کہ سچ مچ مسیح بن مریم ہی بہشت سے نکل کر دنیا میں آجائیں گے تصریحات قرآنیہ سے بکلّی مخالف ہے۔قرآن شریف تین جگہ حضرت مسیح کا فوت ہو جانا کھلے کھلے طورپر بیان کرتا ہے اور حضرت مسیح کی طرف سے یہ عذرپیش کرتاہے کہ عیسائیوں نے جو انہیں اپنے زعم میں خدابنادیا تو اس سے مسیح پر کوئی الزام نہیں کیونکہ وہ اس ضلالت کے زمانہ سے پہلے فوت ہو چکا تھا۔غرض تعلیم قرآن تو یہ ہے کہ مسیح مدت سے فوتؔ ہو چکا ہے اب اگرہمارے علماء کو قرآن شریف کی نسبت حدیثوں کے ساتھ زیادہ پیارہے تو اُن پر یہ فرض ہے کہ احادیث کے ایسے معنے کریں جن سے قرآن شریف کے مضمون کی تکذیب لازم نہ آوے میرے خیال میں
    بقیہ حاشیہ۔ اس مقام میں درحقیقت کوئی ظاہری جنگ وجدل مراد نہیں ہے بلکہ یہ ایک روحانی فوج ہوگی کہ اُس حارث کو دی جائیگی جیسا کہ کشفی حالت میں اس عاجز نے دیکھا کہ انسان کی صورت پر دو شخص ایک مکان میں بیٹھے ہیں ایک زمین پر اور ایک چھت کے قریب بیٹھا ہے تب میں نے اس شخص کو جو زمین پر تھامخاطب کر کے کہا کہ مجھے ایک لاکھ فوج کی ضرورت ہے ،مگر وہ چپ رہا اور اس نے کچھ بھی جواب نہ دیا تب میں نے اُسؔ دوسرے کی طرف رُخ کیا جو چھت کے قریب اور آسمان کی طرف تھااور اُسے میں نے مخاطب کر کے کہا کہ مجھے ایک لاکھ فوج کی ضرورت ہے ، وہ میری اس بات کو سنکر بولا کہ ایک لاکھ نہیں ملے گی مگر پانچ ہزار سپاہی دیاجائے گا تب میں نے اپنے دل میں کہا کہ اگرچہ پانچہزار تھوڑے آدمی ہیں پر اگر خدائے تعالیٰ چاہے تو تھوڑے بہتوں پر فتح پا سکتے ہیں اس وقت میں نے یہ آیت پڑھی
    کَمْ مِّنْ فِئَةٍ قَلِيْلَةٍ غَلَبَتْ فِئَةً کَثِيْرَةً ۢ بِاِذْنِ اللّٰهِ ۲؂ پھر وہ منصور مجھے کشف کی حالت میں دکھایا گیا اور کہا گیا کہ خوشحال ہے خوشحال ہے مگر خدائے تعالیٰ کی کسی حکمت خفیہ نے میری نظر کو اُس کے پہچاننے سے قاصر رکھا لیکن امید رکھتا ہوں کہؔ کسی دوسرے وقت دکھایاجائے۔ اب بقیہ ترجمہ حدیث کا یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ وہ حارث جب ظاہر ہوگا تووہ آل محمد کو (آل محمد کے فقرہ کی تفسیر بیان ہوچکی ہے ) قوت اور استواری بخشے گا اور ان کی پنا ہ ہوجائے گا یعنی ایسے وقت میں کہ جب مومنین غربت کی حالت میں ہوں گے
    ۱؂ الانعام:۱۶۵ ۲؂ البقرۃ:۲۵۰
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 150
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 150
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/150/mode/1up
    جہاں تک میں سوچتا ہوں یقینی طور پر یہ بات متنقش ہے کہ اب تک ہمارے مولویوں نے حدیثوں کو قرآن کے ساتھ تطبیق دینے کے لئے ایک ذرّہ توجہ مبذول نہیں فرمائی جس طرف کسی اتفاق سے خیالؔ کا رجوع ہو گیا اُسی پر زور دیتے چلے گئے ہیں۔مَیں یقینًا جانتا ہوں کہ ہمارے علماء کے لئے یہ امر کچھ سہل یا آسان بات نہیں کہ وہ قرآن شریف اور اپنے خیالات میں جو ظواہر الفاظ حدیثوں سے انہوں نے پیداکئے ہیں تطبیق و توفیق کر کے دکھلا سکیں بلکہ جس وقت وہ اس طرف متوجہ ہوں گے تو اُن کا نور قلب یا یوں کہو کہ کانشنس خود انہیں ملزم کرے گاکہ وہ اُن خیالات کو جو جسمانی طور پر اُن کے دلوں میں منقش ہیں ہرگزہرگز نصوص بیّنہ قرآنیہ سے مطابق نہیں کر سکتے اور نہ قرآن شریف کی اُن آیات میں کوئی راہ تاویل کی کھول سکتے ہیں اور
    بقیہ حاشیہ۔ اور دین اسلام بیکس کی طرح پڑا ہو گا اورچاروں طرف سے مخالفوں کے حملے شروع ہوں گے۔ یہ شخص اسلام کی عزت قائم کرنے کے لئے بقوت تمام اُٹھے گا اور مومنین کوجہال کی زبان سے بچانے کے لئے بجوش ایمان کھڑا ہو گا اور نور عرفان کی روشنی سے طاقت پاکر انکو مخالفوں کے حملوں سے بچائے گا اور اُن سب کو اؔ پنی حمایت میں لے لے گا اور ایسا انہیں ٹھکانا دے گا جیسے قریش نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کودیا تھا یعنی دشمن کے ہرایک الزام اورہر یک باز پُرس اور ہریک طلب ثبوت کے وقت میں سب مومنوں کے لئے سپر کی طرح ہو جائے گا اور اپنے اُس قوی ایمان سے جو نبی کی اتباع سے اُس نے حاصل کیا ہے صدیق اور فاروق اور حیدر کی طرح اسلامی برکتوں اور استقامتوں کو دکھلا کر مومنوں کے امن میں آجانے کا موجب ہوگا۔ ہریک مومن پر واجب ہے جو اس کی مدد کرے یا یہ کہ اس کو قبول کر لیوے۔ یہ اِس بات کی طرف اشارہ ہے کہ ایک ایسا عظیم الشان سلسلہ اس حارث کے سپرد کیاجائے گاجس میں قوم کی امداد کی ضرورت ہو گی۔ جیسا کہ ہمؔ رسالہ فتح اسلام میں اس سلسلہ کی پانچوں شاخوں کا مفصل ذکر کر آئے ہیں اورنیز اس جگہ یہ بھی اشارتاً سمجھایاگیا ہے کہ وہ حارث بادشاہوں یا امیروں میں سے نہیں ہو گا تا ایسے مصارف کا اپنی ذات سے متحمل ہوسکے اور اس تاکید شدید کے کرنے سے اس بات کی طرف بھی اشارہ ہے کہ اُس حارث کے ظہور کے وقت جو مثیل مسیح ہونے کا دعویٰ کرے گا لوگ امتحان میں پڑ جائیں گے اور بہتیرے اُن میں سے مخالفت پر کھڑ ے ہوں گے اور مدد دینے سے روکیں گے بلکہ کوشش کریں گے کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 151
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 151
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/151/mode/1up
    یہ بات خود ظاہر ہے کہ جب کوئی حدیث اپنے کسی مفہوم کی رُو سے قرآن شریف کے بیّنات سے مخالف واقع ہو تو قرآن شریف پر ایمان لانا مقدم ہے کیونکہ حدیث کا مرتبہ قرآن شریف کے مرتبہ سے ہرگز مساوی نہیں اور جو کچھؔ حدیثوں کے بارہ میں ایسے احتمال پیدا ہو سکتے ہیں جو حدیثوں کے وثوق کے درجہ کو کمزور کریں ان احتمالوں میں سے ایک بھی قرآن شریف کی نسبت عائد نہیں ہو سکتا پس کیوں نہ ہم ہر حال میں قرآن شریف کو ہی مقدم رکھیں جس کی صحت پر تمام قوم کو اتفاق اور جس کے محفوظ چلے آنے کے لئے اعلیٰ درجہ کے دلائل ہمارے پاس ہیں اور ہمارے علماء پر یہ بات لازم وواجب ہے کہ قبل اس کے کہ اس بار ہ میں اس عاجز پرؔ کوئی اعتراض کریں پہلے قرآن شریف اور احادیث کے مضامین میں پوری پوری تطبیق وتوفیق کرکے
    بقیہ حاشیہ۔ اس کی جماعت متفرق ہوجائے اس لئے آنحضرت صلعم پہلے سے تاکید کرتے ہیں کہ اے مومنو تم پر اُس حارث کی مدد واجب ہے ایسا نہ ہو کہ تم کسی کے بہکانے سے اس سعادت سے محروم رہ جاؤ۔ اس جگہ جو پیغمبر خدا صلعم نے بیان فرمایاجو مومنوں کو اُس کے ظہور سے قوت پہنچے گی اوراس کے میدان میں کھڑے ہوجانے سے اس تفرقہ زدہ جماعت میں ایک استحکام کی صورت پیداہوجائے گی اور وہ سپر کی طرح اُنکے لئے ہو جائے گا اوراُن کے قدم جم جانے کاموجب ہوگا جیسا کہ مکّہ میں اسلام کے قدم جمنے کے لئے صحابہ کبار موجب ہوگئے تھے یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ وہ تیغ اور تبر سے حمایت اسلام نہیںؔ کرے گا او رنہ اس کام کے لئے بھیجا جائے گا کیونکہ مکہ میں بیٹھ کر جو مومنین قریش نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی حمایت کی تھی جس حمایت میں کوئی دوسری قوم کا آدمی اُن کے ساتھ شریک نہیں تھا الّاشاذو نادر و ہ صرف ایمانی قوت اور عرفانی طاقت کی حمایت تھی نہ کوئی تلوار میان سے نکالی گئی تھی اور نہ کوئی نیزہ ہاتھ میں پکڑا گیا تھا بلکہ انکو جسمانی مقابلہ کرنے سے سخت ممانعت تھی صرف قوت ایمانی اور نور عرفان کے چمکدار ہتھیار اوراُن ہتھیاروں کے جوہر جو صبر اور استقامت اورمحبت اوراخلاص اور وفا اور معارف الٰہیہ اور حقائق عالیہ دینیہ اُن کے پاس موجود تھے لوگوں کو دکھلاتے تھے گالیاں سنتے تھے جان کی دھمکیاں دیکرؔ ڈرائے جاتے تھے اور سب طرح کی ذلّتیں دیکھتے تھے پر کچھ ایسے نشۂ عشق میں مدہوش تھے کہ کسی خرابی کی پروانہیں رکھتے تھے اور کسی بلا سے ہراساں نہیں ہوتے تھے۔ دنیوی زندگی کے رُو سے اس وقت آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 152
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 152
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/152/mode/1up
    دکھلاویں اور معقول طور پر ہمیں سمجھاویں کہ جس حالت میں قرآن شریف کھلے کھلے طور پر حضرت مسیح کے وفات پا جانے کا قائل ہے تو پھر باوجود اُن کے وفات پا جانے اور بہشت میں داخل ہو جانے کے پھر کیوں کر اُن کا وہ جسم جو بموجب نص قرآنی کے زمین میں دفن ہو چکا آسمان سے اُتر آئے گا اور اس جگہ صرف قرآن شریف ؔ ہی اُن کے مدعاکے منافی نہیں بلکہ احادیث صحیحہ ہی سخت منافی و مبائن پڑی ہیں مثلًا بخاری کی یہ حدیث کہجو امامکم منکم ہے اگر تاویلات کے شکنجہ پر نہ چڑھائی جاوے اور جیساکہ ظاہر الفاظ حدیث کے ہیں انہیں کے موافق معنے لئے جائیں تو صاف نظرآرہاہے کہ اس حدیث کے ظاہر ظاہر یہی معنے ہیں کہ وہ تمہارا امام ہوگا اور تم میں سے ہی ہو گا یعنی ایک مسلمان ہو گا نہ یہ کہ سچ مچ حضرت مسیح ابن مریم جسؔ پر انجیل نازل ہوئی ہے
    بقیہ حاشیہ۔ پاس کیارکھا تھا جس کی توقع سے وہ اپنی جانوں اورعزتوں کو معرض خطر میں ڈالتے اور اپنی قوم سے پُرانے اور پُر نفع تعلقات کو توڑ لیتے اُس وقت تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم پر تنگی اور عُسر اور کس نپرسد اور کس نشناسد کازمانہ تھا اور آئندہ کی امیدیں باندھنے کے لئے کسی قسم کے قرائن وعلامات موجود نہ تھے سو انہوں نے اس غریب درویش کا (جو دراصل ایک عظیم الشان بادشاہ تھا) ایسےؔ نازک زمانہ میں وفاداری کے ساتھ محبت اور عشق سے بھرے ہوئے دل سے جو دامن پکڑا جس زمانہ میں آئندہ کے اقبال کی تو کیا امید خود اس مرد مصلح کی چند روز میں جان جاتی نظر آتی تھی یہ وفاداری کا تعلق محض قوت ایمانی کے جوش سے تھا جس کی مستی سے وہ اپنی جانیں دینے کے لئے ایسے کھڑے ہوگئے جیسے سخت درجہ کا پیاسا چشمہ شیریں پر بے اختیار کھڑا ہوجاتاہے۔ سو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ اسی طرح جووہ حارث آئے گا تو وہ مومنین کو تیر وتبر سے مدد نہیں دے گا بلکہ مومنین قریش کی اس مخصوص حالت اور اس مخصوص ماجرا کی طرح جو مکہ میں اُن پر گذرتاتھا جبکہ اُن کے ساتھ دوسری قوموں میں سےؔ کوئی نہ تھا اور نہ ہتھیار استعمال کئے جاتے تھے بلکہ صرف قوت ایمانی اور نورعرفانی کی چمکاریں گفتار اور کردار سے دکھلارہے تھے اور انہیں کے ذریعہ سے مخالفوں پر اثر ڈال رہے تھے یہی طریق اس حارث کا بھی مومنوں کو اپنی پناہ میں لانے کے بارہ میں ہوگاکہ وہ اپنی قوت ایمانی اور نور عرفانی کے آثار وانوار دکھلا کر مخالفین کے منہ بند کرے گا اور مستعد دلوں پر اس کا اثر ڈالے گا اور اس کی قوت ایمانی اور نور عرفانی کا چشمہ جیسا شجاعت واستقامت وصدق وصفا ومحبت ووفا کی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 153
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 153
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/153/mode/1up
    جس کو ایک الگ اُمت دی گئی آسمان سے اُتر آئے گا۔اس جگہ یاد رکھنا چاہیئے کہ امام محمد اسمٰعیل صاحب جو اپنی صحیح بخاری میں آنے والے مسیح کی نسبت صرف اس قدر حدیث بیان کرکے چُپ کر گئے کہ امامکم منکم اس سے صاف ثابت ہو تا ہے کہ دراصل حضرت اسمٰعیل بخاری صاحب کا یہی مذہب تھا کہ وہ ہرگز اس بات کے قائل نہ تھے کہ سچ مچ مسیح ابن مریم آسمان سے اُتر آئےؔ گا بلکہ انہوں نے اس فقرہ میں جو امامکم منکم ہے صاف اور صریح طور پر اپنا مذہب ظاہر کر دیا ہے ایسا ہی حضرت بخاری صاحب نے اپنی صحیح میں معراج کی حدیث میں جو ہمارے سیّد و مولیٰ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی ملاقات کا حال دوسرے انبیا سے آسمانوں پر لکھا ہے تو اس جگہ حضرت عیسیٰ کا کوئی خاص طور پر مجسم ہونا ہرگز بیان نہیں کیا بلکہ جیسے حضرت ابراہیم ؑ
    بقیہ حاشیہ۔ رو سے بہتا ہو گا ایسا ہی روحانی امور کے بیان کرنے اور روحانی اور عقلی حجتوں کو مخالفوں پر پورا کرنے کے لئےؔ بڑے زور سے رواں ہو گا اور وہ چشمہ اُسی چشمہ کا ہمرنگ ہو گا جو قریش کے مقدس بزرگوں صدیقؔ ؓ اور فاروقؔ ؓ اور علی مرتضیٰؓ کوملا تھا جن کے ایمان کو آسمان کے فرشتے بھی تعجب کی نگہ سے دیکھتے تھے اورجن کے صافی عرفان میں سے اس قدر علوم و انوار وبرکا ت وشجاعت واستقامت کے چشمے نکلے تھے کہ جس کا اندازہ کرنا انسان کاکام نہیں سوہمارے سیّد ومولیٰ فرماتے ہیں کہ وہ حار ث بھی جب آئے گا تو اسی ایمانی چشمہ وعرفانی منبع کے ذریعہ سے قوم کے پودوں کی آبیاری کرے گا اور اُن کے مرجھائے ہوئے دلوں کو پھر تازہ کردے گا اور مخالفوں کے تمام بیجا الزاموں کو اپنی صداقت کے پیروؔ ں کے نیچے کچل ڈالے گا تب اسلام پھر اپنی بلندی اور عظمت دکھائے گا اور بے حیا خنزیر قتل کئے جاویں گے اور مومنین کو وہ عزت کی کُرسی مل جائیگی جس کے وہ مستحق تھے۔ الغرض حدیث نبوی کی یہ تشریح ہے جو اس جگہ ہم نے بیان کر دی اور اسی کی طرف وہ الہام اشارہ کرتا ہے جو براہین احمدیہ میں درج ہو چکا ہے۔ بخرام کہ وقت تو نزدیک رسید وپائے محمّدیاں برمنار بلند تر محکم افتاد۔ اور اسی کی طرف وہ الہام بھی اشارہ کرتا ہے جو اس عاجز کی نسبت بحوالہ ایک حدیث نبوی کے جو پیشگوئی کے طور پر اس عاجز کے حق میں ہے خدائے تعالیٰ نے بیانؔ فرمایا ہے جو براہین میں درج ہے اور وہ یہ ہے لوکان الایمان معلّقًا بالثّریا لنا لہ رجل من فارس انّ الذین
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 154
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 154
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/154/mode/1up
    اور حضرت موسیٰؑ کی روح سے آنحضرتصلی اللہ علیہ وسلم کیؔ ملاقات کا ذکر کیا ہے۔ایساہی بغیر ایک ذرہ فر ق کے حضرت عیسیٰ کی روح سے ملاقات ہو نا بیان کیا ہے بلکہ حضرت موسیٰ کی روح کا کھلے کھلے طور پر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے گفتگو کرنا مفصل طور پر لکھا ہے پس اس حدیث کو پڑھ کر کچھ شک نہیں ہو سکتا کہ اگر حضرت مسیح جسم کے ساتھ آسمان کی طرف اٹھائے گئے ہیں تو پھر ایساہی حضرت ابراہیم اور حضرت موسیٰ وغیرہ انبیاء بھی اس جسم کے ساتھ اٹھاؔ ئے گئے ہوں گے کیونکہ معراج کی رات میں وہ نبی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو ایک ہی رنگ میں آسمانوں پر نظر آئے ہیں یہ نہیں کہ کوئی خاص وَردی یا کوئی خاص علامت مجسم اٹھائے جانے کی حضرت مسیح میں دیکھی ہو اور دوسرے نبیوں میں وہ علامت نہ پائی گئی ہو۔تمام حدیثوں کے پڑھنے والے اس بات کو خوب جانتے ہیں کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے معراج کی
    بقیہ حاشیہ۔ کفروا وصدّوا عن سبیل اللّٰہ ردّ علیھم رجل من فارس شکراللّٰہ سعیہ خذوا التوحید التوحید یاابناء الفارس۔اس الہام میں صریح اور صاف طورپر بیان کیاگیا ہے کہ وہ فارسی الاصل جس کا دوسرا نام حارث بھی ہے بڑیؔ خصوصیت یہ رکھتا ہے کہ اس کا ایمان نہایت درجہ کا قوی ہے اگر ایمان ثریامیں بھی ہوتا تو وہ مرد وہیں اس کو پالیتاخدا اس کا شکر گزار ہے کہ اس نے دین اسلام کے منکروں کے سب الزامات وشبہات کو رد کیا اور حجت کو پورا کر دیا توحید کو پکڑو توحید کو پکڑو اے ابنائے فارس یعنی توحید کی راہیں صاف کرو اور توحید سکھلاؤ اور توحید جو دنیا سے گری جاتی اور گم ہوتی جاتی ہے اس کو پکڑ لو کہ یہی سب سے مقدّم ہے اور اسی کو لوگ بھول گئے اور اس جگہ اِبْنکی جگہ جو اَبْناء کالفظ اختیار کیا گیا حالانکہ مخاطب صرف ایک شخص ہے یعنی یہ عاجز۔ یہ بطور اعزاؔ ز کے حضرت باری تعالیٰ کی طرف سے ہے جیسا کہ بعض حدیثوں میں بجائے اس حدیث کے کہ لو کان الایمان معلقًا بالثریا لنالہ رجل من فارس ہے رجال من فارس
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 155
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 155
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/155/mode/1up
    رات میں جن جن نبیوں سے ملاقاؔ ت کی اُن سب کا ایک ہی طرز اور ایک ہی طور پر حال بیان کیا ہے حضرت مسیح کی کوئی خصوصیت بیان نہیں فرمائی۔کیا یہ مقام علماء کے توجہ کرنے کے لائق نہیں؟
    ایک نہایت لطیف نکتہ جو سورۃالقدر کے معانی پر غور کرنے سے معلوم ہوتاہے یہ ہے کہ خدائے تعالیٰ نے اس سورۃ میں صاف اور صریح لفظوں میں فرما دیاہے کہ جس وقت کوئی آسمانی مصلح زمین پر آتا ہےؔ تو اس کے ساتھ فرشتے آسمان سے اُتر کر مستعد لوگوں کو حق کی طرف کھینچتے ہیں پس اِن آیات کے مفہوم سے یہ جدید فائدہ حاصل ہوتاہے کہ اگر سخت ضلالت اور غفلت کے زمانہ میں یک دفعہ ایک خارق عادت طور پر انسانوں کے قویٰ میں خود بخود مذہب کی تفتیش کی طرف حرکت پیداہونی شروع ہوجائے تو وہ اس بات کی علامت ہو گی کہ کوئی
    بقیہ حاشیہ۔ لکھاہے وہ بھی درحقیقت اسی اعزاز کے ارادہ سے ہے ورنہ ہر جگہ درحقیقت رجل ہی مرادہے اس تمام تحقیق سے معلوم ہوا کہ حارث کی نسبت یہی عمدہ علامت احادیث میں ہے کہ ایمانی نمونہ لیکر دنیا میں آئے گا اور اپنی قوت ایمانی کی شاخیں اور اُن کے پھل ظاہر کر کے ضعیفوں کو تقویت بخشے گا اور کمزوروں کو سنبھال لے گا اور اپنی صداقت کی شعاعوں سے شپّر سیرت مخالفوں کو خیرہ کر دے گا لیکن مومنوں کے لئے آنکھؔ کی روشنی اور کلیجے کی ٹھنڈک کی طرح سکینت اور اطمینان اور تسلی کا موجب ہو گا اورایمانی معارف کا معلّم بن کر ایمانی روشنی کو قوم میں پھیلائے گا۔ اورہم رسالہ فتح اسلام میں ظاہر کر آئے ہیں کہ درحقیقت مسیح بھی ایک ایمانی معارف کاسکھلانے والااور ایمانی معلم تھا اور یہ بھی ظاہر کر آئے ہیں کہ مسیح بھی ظاہری لڑائیوں کے لئے نہیں آئے گا بلکہ بخاری نے یضع الحرب اس کی علامت لکھی ہے اور یہ کہ اُس کا قتل کرنا اپنے دم کی ہوا سے ہوگا نہ تلوار سے یعنی موجّہ باتوں سے روحانی طورپر قتل کر ے گا۔ سو مسیح اور حارث کا ان دونوں علامتوں میں شریک ہونا اس بات پر پختہ دلیل ہے کہ حارث اورمسیحؔ موعود دراصل ایک ہی ہیں اور یہ حارث موعودکی پہلی علامت ہے جو ہم نے لکھی ہے یعنی یہ کہ وہ نہ سیف کے ساتھ نہ سنان کے ساتھ بلکہ اپنی قوت ایمانی کے ساتھ اور اپنے انوارعرفان کے ساتھ اپنی قوم کو تقویت دے گاجیسے قریش نے یعنی صدیقؔؓ وفاروقؔ ؓ وحیدرؔ کرارؓ ودیگر مومنین مکہ نے انہیں صفات استقامت کے ساتھ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 156
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 156
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/156/mode/1up
    آسمانی مصلح پیداہو گیا ہے کیونکہ بغیر روح القدس کے نزول کےؔ وہ حرکت پیداہوناممکن نہیں اور وہ حرکت حسب استعداد و طبائع دوقسم کی ہوتی ہے حرکت تامہ اور حرکت ناقصہ۔ حرکت تامہ وہ حرکت ہے جوروح میں صفائی اور سادگی بخش کر اور عقل اور فہم کو کافی طور پر تیزکرکے روبحق کردیتی ہے۔اور حرکت ناقصہ وہ ہے جو روح القدس کی تحریک سے عقل اور فہم تو کسی قدر تیزہو جاتا ہے مگر بباعث عدم سلامت استعداد کے وہ روبحق نہیں ہو سکتابلکہ مصداق اس آیت کا ہو جاتاہے کہ
    فِىْ قُلُوْبِهِمْ مَّرَضٌۙ فَزَادَهُمُ اللّٰهُ مَرَضًا ۱؂یعنی عقل اور فہم کے جنبش میں آنے سے پچھلی حالت اُس شخص کی پہلی حالت سے بد تر ہو جاتی ہے جیسا کہ تمام نبیوں کے وقت میں یہی ہوتارہا کہ جب اُن کے نزول کے ساتھ ملائک کا نزول ہوا توملائکہ کی اندرونی تحریک سے ہریک طبیعت عام طور پر جنبش میں آگئی تب جو لوگ راستی کے فرزند تھے وہ
    بقیہ حاشیہ۔ دین احمد ی کے مکّہ معظمہ میں قدم جماد ئے تھے۔
    اس پہلی علامت کا ثبوت اس عاجز کی نسبت ہریک غور کرنے والے پر ظاہر ہوگا کہ یہ عاجز اسی قوتِ ایمانی کے جوش سے عام طور پر دعوت اسلام کے لئے کھڑا ہوا اور بارہ ہزار کے قریب اشتہارات دعوت اسلام رجسٹریؔ کراکر تمام قوموں کے پیشواؤں اور امیروں اور والیانِ ملک کے نام روانہ کئے یہانتک کہ ایک خط اور ایک اشتہار بذریعہ رجسٹری گورنمنٹ برطانیہ کے شہزادہ ولی عہد کے نام بھی روانہ کیا اور وزیراعظم تخت انگلستان گلیڈ سٹون کے نام بھی ایک پرچہ اشتہار اور خط روانہ کیا گیا۔ ایسا ہی شہزادہ بسمارک کے نام اور دوسرے نامی امراء کے نام مختلف ملکوں میں اشتہار ات وخطوط روانہ کئے گئے جن سے ایک صندوق پُر ہے۔ اور ظاہر ہے کہ یہ کام بجُز قوت ایمانی کے انجام پذیر نہیں ہو سکتا۔ یہ بات خود ستائی کے طور پر نہیں بلکہ حقیقت نمائی کے طور پر ہے تاحق کے ؔ طالبوں پر کوئی بات مشتبہ نہ رہے۔ ماسوااس کے قوت ایمانی کے انوار جو تائیداتِ غیبیہ کے پیرایہ میں بطور خارق عادت ظاہر ہوتے ہیں جوخدائے تعالیٰ کے فضل ورحم اور قر ب پر دلالت کرتے ہیں اُن کے بارے میں بھی انہیں اشتہارات میں لکھاگیا ہے جو بباعث قوت ایمانی وقدم بر صراط مستقیم یہ سب نعمتیں اس عاجز کو خاص طور پر عطا کی گئی ہیں کسی مخالف مذہب کو یہ مرتبہ ہرگز حاصل نہیں اگر ہے تو وہ مقابلہ کے لئے کھڑا ہووے اور اپنی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 157
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 157
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/157/mode/1up

    اُن راستبازوں کی طرف کھنچے چلے آئے اور جو شرارت اور شیطان کیؔ ذرّیت تھے وہ اس تحریک سے خوابِ غفلت سے جاگ تو اُٹھے اور دینیات کی طرف متوجہ بھی ہوگئے لیکن بباعث نقصان استعداد حق کی طرف رُخ نہ کر سکے سو فعل ملائک کا جو ربّانی مصلح کے ساتھ اُترتے ہیں ہریک انسان پر ہوتاہے لیکن اس فعل کا نیکوں پر نیک اثر اور بدوں پر بد اثر پڑتاہے ؂
    باراں کہ درلطافت طبعش خلاف نیست
    در باغ لالہ روید درشورہ بوم و خس
    اورؔ جیساکہ ہم ابھی اوپر بیان کر چکے ہیں یہ آیت کریمہ فِىْ قُلُوْبِهِمْ مَّرَضٌۙ فَزَادَهُمُ اللّٰهُ مَرَضًا ۱؂ اسی مختلف طور کے اثر کی طرف اشارہ کرتی ہے۔
    یہ بات یاد رکھنے کے لائق ہے کہ ہر نبی کے نزول کے وقت ایک لیلۃ القدر ہوتی ہے جس میں وہ نبی اور وہ کتاب جو اس کو دی گئی ہے آسمان سے نازل ہوتی ہے اور فرشتے آسمان سے اُترتے ہیں
    بقیہ حاشیہ۔ روحانی برکات کا جو اپنے مذہب کی اتباع سے اس کو حاصل ہوں اس عاجز سے موازنہ کرے لیکن آج تک کوئی مقابل پرنہیں اُٹھا اور نہ اؔ نسان ضعیف اور ہیچ کی یہ طاقت ہے کہ صرف اپنی مکّاری اور شرارتوں کے منصوبہ سے یا متعصبانہ ہٹ سے اس سلسلہ کے سامنے کھڑا ہوسکے جسکو خدائے تعالیٰ نے اپنے ہاتھ سے قائم کیا ہے اور میں سچ کہتا ہوں کہ اگر کوئی اس سلسلہ کے سامنے اپنی برکات نمائی کی رو سے کھڑا ہو تو نہایت درجہ کی ذلّت سے گرادیا جائیگاکیونکہ یہ کام اور یہ سلسلہ انسان کی طرف سے نہیں بلکہ اُس ذات زبردست اور قوی کی طرف سے ہے جس کے ہاتھوں نے آسمانوں کو اُن کے تمام اجرام کے ساتھ بنایا اور زمین کو اس کے باشندوں کے لئے بچھادیا۔افسوس کہ ہماری قو م کے مولوی اور علماء یُوں تو تکفیر کے لئے بہت جلد کاغذؔ او رقلم دوات لیکر بیٹھ جاتے ہیں لیکن ذرہ سوچتے نہیں کہ کیا یہ ہیبت اور رعب باطل میں ہؤاکرتا ہے کہ تمام دنیاکو مقابلہ کے لئے کہاجائے اور کوئی سامنے نہ آسکے کیاوہ شجاعت و استقامت جھوٹوں میں بھی کسی نے دیکھی ہے جو ایک عالم کے سامنے اس جگہ ظاہرکی گئی۔ اگر انہیں شک ہے تو مخالفین اسلام کے جسقدر پیشوااور واعظ اورمعلّم ہیں اُن کے دروازہ پر جائیں اور اپنے ظنون فاسدہ کا سہارا دیکر انہیں میرے مقابلہ پر روحانی امور کے موازنہ کے لئے کھڑاکریں پھر دیکھیں کہ خدائے تعالیٰ میری حمایت کرتاہے یا نہیں۔ اے خشک مولویو! اور پُر بدعت زاہدؔ و! تم پر افسوس کہ تمھاری آنکھیں عوام الناس سے زیادہ تو کیا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 158
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 158
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/158/mode/1up
    لیکن سب سے بڑی لیلۃ القدر وہ ہے جو ہمارے نبی صلی اللہ علیہؔ وسلم کو عطاکی گئی ہے درحقیقت اس لیلۃ القدر کا دامن آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے قیامت تک پھیلا ہوا ہے اور جو کچھ انسانوں میں دلی اور دماغی قویٰ کی جنبش آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے آج تک ہو رہی ہے وہ لیلۃ القدر کی تاثیریں ہیں صرف اتنا فرق ہے کہ سعیدوں کے عقلی قویٰ میں کامل اور مستقیم طور پر وہ جنبشیں ہوتیں ہیں اور اشقیاء کے عقلی قویٰ ایک کج اور غیر مستقیم طور سےؔ جنبش میں آتے ہیں اور جس زمانہ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا کوئی نائب دنیا میں پیداہوتاہے تو یہ تحریکیں ایک بڑی تیزی سے اپنا کام کرتی ہیں بلکہ اُسی زمانہ سے کہ وہ نائب رحم مادر میں آوے پوشیدہ طور پر انسانی قویٰ کچھ کچھ جنبش شروع کرتے ہیں اور حسب استعداد اُن میں ایک حرکت پیداہو جاتی ہے اور اس نائب کو نیا بت کے اختیار ات ملنے کے وقت تو وہ جنبش نہایت تیز ہو جاتی ہے
    بقیہ حاشیہ۔ اُن کے برابر بھی نہیں دیکھ سکتیں آپ ہی یہ حدیثیں سُناتے ہوکہ الاٰیات بعد المأتین اورکہتے ہوکہ بارہ سو برس کے بعد مسیح موعودوغیرہ نشانیوں کاظاہر ہوناضروری ہے بلکہ تم میں سے وہ مولوی بھی ہیں جنہوں نے شرطی طور پر کتابیں لکھ ماریں اور چھپوابھی دیں کہ چودھویں صدی کے اوائل میں مسیح اور مہدی موعود کا ظاہر ہوناضروری ہے لیکن جب خدائے تعالیٰ نے اپنے پاک نشانوں کو ظاہر کیا تو اول المنکرین تم لوگ ہی ٹھہرے۔
    اورؔ قوت ایمانی کے آثار میں سے جو اس عاجز کو دی گئی ہے استجابت دعا بھی ہے اس عاجز پر ظاہر کیاگیا ہے کہ جو بات اس عاجز کی دعا کے ذریعہ سے ردّ کی جائے وہ کسی اور ذریعہ سے قبول نہیں ہو سکتی اور جو دروازہ اس عاجز کے ذریعہ سے کھولا جائے وہ کسی اور ذریعہ سے بند نہیں ہو سکتالیکن یہ قبولیت کی برکتیں صرف اُن لوگوں پر اپنا اثر ڈالتی ہیں کہ جو غایت درجہ کے دوست یاغایت درجہ کے دشمن ہوں جو شخص پور ے اخلاص سے رجوع کرتا ہے یعنی ایسے اخلاص سے جس میں کسی قسم کا کھوٹ پوشیدہ نہیں جس کاانجام بدظنی وبد اعتقادی نہیں جس میں کوئی چُھپی ہوئی نفاق کی زہر نہیں وہ بے شک ان برکتوں کو دیکھ سکتا ہے اور ان سے حصہ پاسکتا ہے او روہ بلاشبہ اس چشمہ کو اپنی استعداد کے موافق شناخت کرؔ لے گا مگر جو خلوص کے ساتھ نہیں ڈھونڈے گا وہ اپنے ہی قصور کی وجہ سے محروم رہ جائے گا اور اپنی ہی اجنبیت کے باعث سے بیگانہ رہے گا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 159
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 159
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/159/mode/1up
    پس نائبؔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نزول کے وقت جو لیلۃ القدر مقررکی گئی ہے وہ درحقیقت اس لیلۃ القدر کی ایک شاخ ہے یا یوں کہو کہ اس کا ایکِ ظل ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو ملی ہے خدائے تعالیٰ نے اس لیلۃ القدر کی نہایت درجہ کی شان بلند کی ہے جیساکہ اُس کے حق میں یہ آیت کریمہ ہے کہ 3 ۱؂ یعنی اس لیلۃ القدر کے زمانہ میں جو قیامت تک مُمتد ہے ہریک حکمت اور معرفت کیؔ باتیں دنیا میں شائع کردی جائیں گی اور انواع اقسام کے علوم غریبہ و فنون نادرہ و صناعات عجیبہ صفحۂ عالم میں پھیلا دئے جائیں گے اور انسانی قویٰ میں موافق اُن کی مختلف استعدادوں اور مختلف قسم کے امکان بسطت علم اور عقل کے جو کچھ لیاقتیں مخفی ہیں یا جہاں تک وہ ترقی کر سکتے ہیں سب کچھ بمنصہ ظہور لایا جائے گا لیکن یہ سب کچھ ان دنوں میں پر زور تحریکوں سے ہوتارہے گا کہ جب کوئی نائب رسو لؔ اللہ صلی اللہ علیہ وسلم
    بقیہ حاشیہ۔ اور ایک پھل قوت ایمانی کا اسرار حقہ ومعارف دینیہ کاذخیرہ ہے جو اس عاجز کو خدائے تعالیٰ کی طرف سے عنایت ہوا ہے۔ پس جو شخص اس عاجز کی تالیفات پر نظر ڈالے گا یا اس عاجز کی صحبت میں رہے گا اُس پر یہ حقیقت آپ ہی کھل جائیگی کہ کس قدر خدائے تعالیٰ نے اس عاجز کو دقائق وحقائق دینیہ سے حصہ دیا ہے۔ دوسری اور تیسری علامت یعنی یہ کہ بخاری یا سمرقندی الاصل ہونا اور زمیندار اور زمینداری کے ممیّز خاندان میں سے ہونا یہ دونوں علامتیں صریح اور بیّن طور پر اس عاجز میں ثابت ہیں اور اس جگہ مجھےؔ قرینِ مصلحت معلوم ہوتا ہے کہ اپنے آباء کی لائف یعنی سوانح زندگی کسی قدر اختصار کے ساتھ لکھوں سو پہلے میں یہ ظاہر کرنا چاہتا ہوں کہ عرصہ قریب بیس برس کے ہوا ہوگا کہ ایک انگریز مسٹر گریفن نام نے بھی جو اس ضلع میں ڈپٹی کمشنر رہ چکا ہے اور ریاست بھوپال اور راجپوتانہ ریاستوں کا رزیڈنٹ بھی رہا ہے پنجا ب کے رئیسوں کا ایک سوانح تاریخ کے طور پر تالیف کر کے چھپوایا تھا اس میں انہوں نے میرے والد مرحوم مرزا غلام مرتضیٰ صاحب کا ذکر کرکے کچھ مختصر طور پر اُن کے زمینداری خاندان کاحال اور سمر قندی الاصل ہونا لکھا ہے لیکن میں اس جگہ کسی قدر مفصل بیان کرنے کی غرض سے ان تمام امور کو وضاحت سے لکھنا چاہتا ہوں جو اس حدیث نبو ی کی کامل تشریح کے لئے بطور مصداق کے ہیں تا اس عاجز کا ابتدؔ ا سے سمرقندی الاصل ہونا اور ابتدا سے یہ خاندان ایک زمینداری خاندان ہونا جیساکہ حضرت خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث کا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 160
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 160
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/160/mode/1up
    دنیا میں پیداہو گا درحقیقت اِسی آیت کو سورۃ الزلزال میں مفصل طور پر بیان کیا گیا ہے کیونکہ سورۃ الزلزال سے پہلے سورۃ القدر نازل کرکے یہ ظاہر فرمایا گیا ہے کہ سنت اللہ اسی طرح پر جاری ہے کہ خدائے تعالیٰ کا کلام لیلۃ القدر میں ہی نازل ہوتاہے اور اس کا نبی لیلۃ القدر میں ہی دنیا میں نزول فرماتا ہے اور لیلۃ القدر میں ہی وہ فرشتے اُترتے ہیں جن کے ذریعہ سے دُنیاؔ میں نیکی کی طرف تحریکیں پیداہوتی ہیں اور وہ ضلالت کی پُر ظلمت رات سے شروع کر کے طلوع صبح صداقت تک اسی کام میں لگے رہتے ہیں کہ مستعد دلوں کو سچائی کی طرف کھینچتے رہیں۔ پھر بعد اس سورۃ کے خدائے تعالیٰ نے سورۃ البیّنہ میں بطور نظیر کے بیان کیا کہ لَمْ يَكُنِ الَّذِيْنَ كَفَرُوْا مِنْ اَهْلِ الْكِتٰبِ وَالْمُشْرِكِيْنَ مُنْفَكِّيْنَ حَتّٰى تَاْتِيَهُمُ الْبَيِّنَةُۙ ۱؂۔‏
    یعنی جن سخت بلاؤں میں اہلؔ کتاب اور مشرکین مبتلا تھے اُن سے نجات پانے کی کوئی
    بقیہ حاشیہ۔ منشاء ہے۔ اچھی طرح لوگوں پر ظاہر ہوجائے۔
    واضح ہو کہ اُن کاغذات اور پُرانی تحریرات سے کہ جو اکابراس خاندان کے چھوڑ گئے ہیں ثابت ہوتا ہے کہ بابر بادشاہ کے وقت میں کہ جو چغتائی سلطنت کا مورث اعلیٰ تھا بزرگ اجداد اس نیاز مند الٰہی کے خاص سمر قند سے ایک جماعت کثیرکے ساتھ کسی سبب سے جو بیان نہیں کیا گیا ہجرت اختیار کرکے دہلی میں پہنچے اور دراصل یہ بات اُن کاغذات سے اچھی طرح واضح نہیں ہوتی کہ کیا وہ بابر کے ساتھ ہی ہندوستان میں داخل ہوئے تھے یا بعد اس کے بلا توقف اس ملک میں پہنچ گئے۔ لیکن یہ امر اکثر کاغذات کے دؔ یکھنے سے بخوبی ثابت ہوتا ہے کہ گو وہ ساتھ پہنچے ہوں یا کچھ دن پیچھے سے آئے ہوں مگر انہیں شاہی خاندان سے کچھ ایسا خاص تعلق تھاجس کی وجہ سے وہ اس گورنمنٹ کی نظر میں معزز سرداروں میں سے شمار کئے گئے تھے چنانچہ بادشاہ وقت سے پنجاب میں بہت سے دیہات بطور جاگیر کے اُنہیں ملے اور ایک بڑی زمینداری کے وہ تعلق دار ٹھہرائے گئے اور ان دیہات کے وسط میں ایک میدان میں انہوں نے قلعہ کے طور پر ایک قصبہ اپنی سکونت کے لئے آباد کیا جس کانام اسلام پورقاضی ماجھی رکھا یہی اسلام پور ہے جو اَب قادیان کے نام سے مشہور ہے۔ اس قصبہ کے گردا گرد ایک فصیل تھی جس کی بلندی بیس فٹ کے قریب ہوگی اور عرض اس قدر تھا کہ تین چھکڑے ایک دوسرے کے برابر اس پر چل سکتے تھے چار بڑے بڑےؔ بُرج تھے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 161
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 161
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/161/mode/1up

    سبیل نہ تھی بجُز اس سبیل کے کہ خدائے تعالیٰ نے آپ پیداکردی کہ وہ زبردست رسول بھیجا جس کے ساتھ زبردست تحریک دینے والے ملائک نازل کئے تھے اور زبردست کلام بھیجا گیا تھا پھر بعد اس کے آنے والے زمانہ کے لئے خدائے تعالیٰ سورۃ الزلزال میں بشارت دیتا ہے اور اِذَازُلْزِلَتْ کے لفظ سے اِس بات کی طرفؔ اشارہ کرتاہے کہ جب تم یہ نشانیاں دیکھو تو سمجھ لو کہ وہ لیلۃ القدر اپنے تمام تر زور کے ساتھ پھر ظاہر ہوئی ہے اور کوئی ربّانی مصلح خدائے تعالیٰ کی طرف سے مع ہدایت پھیلانے والے فرشتوں کے نازل ہو گیاہے جیساکہ فرماتاہے
    اِذَا زُلْزِلَتِ الْاَرْضُ زِلْزَالَهَاۙ‏
    وَاَخْرَجَتِ الْاَرْضُ اَثْقَالَهَاۙ‏
    وَقَالَ الْاِنْسَانُ مَا لَهَا‌ۚ‏
    يَوْمَٮِٕذٍ تُحَدِّثُ اَخْبَارَهَاۙ
    بِاَنَّ رَبَّكَ اَوْحٰى لَهَاؕ‏
    يَوْمَٮِٕذٍ يَّصْدُرُ النَّاسُ اَشْتَاتًا ۙ لِّيُرَوْا اَعْمَالَهُمْ
    فَمَنْ يَّعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيْرًا يَّرَهٗ‏
    بقیہ حاشیہ۔ جن میں قریب ایک ہزار کے سوا ر و پیادہ فوج رہتی تھی اوراس جگہ کا نام جو اسلام پور قاضی ماجھی تھا تو اس کی یہ وجہ تھی کہ ابتدا میں شاہان دہلی کی طرف سے اس تمام علاقہ کی حکومت ہمارے بزرگوں کو دی گئی تھی اور منصب قضا یعنی رعایا کے مقدمات کا تصفیہ کرنا ان کے سپرد تھا اور یہ طرز حکومت اس وقت تک قائم وبرقرار رہی کہ جس وقت تک پنجاب کا ملک دہلی کے تخت کا خراج گذار رہا لیکن بعد اس کے رفتہ رفتہ چغتائی گورنمنٹ میں بباعث کاہلی وسُستی وعیش پسندی ونالیاقتی تخت نشینوں کے بہت سافتور آگیا اور کئی ملک ہاتھ سے نکل گئے انہیں دنوں میں اکثر حصہ پنجاب کا گورنمنٹ چغتائی سے منقطع ہو کر یہ ملک ایک ایسی بیوہ عورت کی طرح ہوگیاجس کے سر پر کوئی سرپرست نہ ہو اور خدا ئے تعالیٰ کے اعجوبہ قدرتؔ نے سکھوں کی قوم کوجو دہقان بے تمیز تھی ترقی دیناچاہاچنانچہ اُن کی ترقی اور تنزل کے دونوں زمانے پچاس برس کے اندر اندر ختم ہوکر اُن کا قصہ بھی خواب خیال کی طرح ہو گیا۔ غرض اس زمانہ میں کہ جب چغتائی سلطنت نے اپنی نالیاقتی اور اپنی بدانتظامی سے پنجاب کے اس حصہ سے بکلّی دستبرداری اختیار کی تو ان دنوں میں بڑے بڑے زمیندار اس نواح کے خود مختار بن کر اپنے اقتدار کامل کانقشہ جمانے لگے۔ سو انہیں ایام میں بفضل واحسان الٰہی اس عاجز کے پرداداصاحب مرزا گل محمد مرحوم اپنے تعلقہ زمینداری کے ایک مستقل رئیس اور طوائف الملوک میں سے بنکر ایک چھوٹے سے علاقہ کے جو صرف چورا ۸۴سی یاپچا ۸۵سی گاؤں رہ گئے تھے کامل اقتدار
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 162
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 162
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/162/mode/1up
    وَمَنْ يَّعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَّرَهٗ۱؂۔ یعنی اُن دنوں کا جب آخری زمانہ میں خدائے تعالیٰ کی طرف سے کوئی عظیم الشان مصلح آئے گا اور فرشتے نازل ہوں گے یہ نشان ہے کہ زمین جہاں تک اُس کاہلانا ممکن ہے ہلائی جائے گی یعنی طبیعتوں اور دلوں اور دماغوں کو غایت درجہ پر جنبش دی جائے گی اور خیالات عقلی اور فکری اور سبعی اور بہیمی پورؔ ے پورے جوش کے ساتھ حرکت میں آجائیں گے اور زمین اپنے تمام بوجھوں کو باہر نکا ل دے گی یعنی انسانوں کے دل اپنی تمام استعدادات مخفیہ کو بمنصہ ظہور لائیں گے اور جو کچھ اُن کے اندر علوم وفنون کا ذخیر ہ ہے یا جو کچھ عمدہ عمدہ دلی و دماغی طاقتیں و لیاقتیں اُن میں مخفی ہیں سب کی سب ظاہر ہو جائیں گی اور انسانی قوتوں کا آخری نچوڑ نکل آئے گا اور جو جو ملکات انسان کے اندر ہیں یا جو جو جذبات اس کی فطرت میں مودع ہیںؔ وہ تمام مکمن قوت سے حیّزِ فعل میں آجائیں گے اور انسانی حواس کی ہریک نوع کی
    بقیہ حاشیہ۔ کے ساتھ فرماں روا ہو گئے اور اپنی مستقل ریاست کا پورؔ اپورا انتظام کرلیا اور دشمنوں کے حملے روکنے کے لئے کافی فوج اپنے پاس رکھ لی اور تمام زندگی ان کی ایسی حالت میں گذری کہ کسی دوسرے بادشاہ کے ماتحت نہیں تھے اور نہ کسی کے خراج گزار بلکہ اپنی ریاست میں خود مختار حاکم تھے اور قریب ایک ہزار سوار وپیادہ ان کی فوج تھی اور تین توپیں بھی تھیں اور تین چار سو آدمی عمدہ عمدہ عقلمندوں اورعلماء میں سے ان کے مصاحب تھے اورپانچسو کے قریب قرآن شریف کے حافظ وظیفہ خوار تھے جو اس جگہ قادیان میں رہا کرتے تھے اور تمام مسلمانوں کو سخت تقید سے صوم وصلٰوۃ کی پابندی اور دین اسلام کے احکام پر چلنے کی تاکید تھی اور منکرات شرعی کو اپنی حدودمیں رائج ہونے نہیں دیتے تھے اور اگرکوئی مسلمان ہوؔ کر خلاف شعار اسلا م کوئی لباس یا وضع رکھتا تھاتو وہ سخت مورد عتاب ہوتا تھا اور سقیم الحال اورغربااور مساکین کی خبر گیری اور پرورش کے لئے ایک خاص سرمایہ نقد اور جنس کاجمع رہتا تھاجو وقتًا فوقتًا ان کو تقسیم ہوتاتھا۔ یہ اُن تحریرات کا خلاصہ ہے جو اس وقت کی لکھی ہوئی ہم کو ملی ہیں جن کی زبانی طور پر بھی شہادتیں بطریق مسلسل اب تک پائی جاتی ہیں۔ یہ بھی لکھاہے کہ ان دنوں میں ایک وزیر سلطنت مغلیہ کا غیاث الدولہ نام قادیان میں آیا اور میرزا گل محمدصاحب مرحوم کے استقلال وحسن تدبیر وتقویٰ وطہارت وشجاعت واستقامت کو دیکھ کرچشم پُر آب ہوگیا اور کہا کہ اگر مجھے پہلے سے خبر ہوتی کہ خاندان مغلیہ میں سے ایک ایسا مرد پنجاب کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 163
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 163
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/163/mode/1up
    تیزیاں اور بشری عقل کی ہر قسم کی باریک بینیاں نمودارہوجائیں گی اور تمام دفائن و خزائن علوم مخفیہ و فنون مستورہ کے جو چھپے ہوئے چلے آتے تھے اُن سب پر انسان فتحیاب ہو جائے گا اور اپنی فکری اور عقلی تدبیروں کو ہریک باب میں انتہا تک پہنچا دے گا اور انسان کی تمام قوتیں جو نشاءِ انسانی میں مخمّر ہیں صدہا طرح کی تحریکو ںؔ کی وجہ سے حرکت میں آجائیں گی اور فرشتے جو اس لیلۃ القدرمیں مردِ مصلح کے ساتھ آسمان سے اُترے ہوں گے ہریک شخص پر اس کی استعداد کے موافق خارق عادت اثر ڈالیں گے یعنی نیک لوگ اپنے نیک خیال میں ترقی کریں گے اور جن کی نگاہیں دنیا تک محدود ہیں وہ اُن فرشتوں کی تحریک سے دنیوی عقلوں اور معاشرت کی تدبیروں میں وہ یدِ بیضا دکھلائیں گے کہ ایک مرد عارف متحیّر ہو کر اپنے دل میں کہے گا کہ یہ عقلیؔ اور فکری طاقتیں ان لوگوں کو کہاں سے ملیں ؟ تب اُس روز ہریک استعداد انسانی بزبان حال باتیں کرے گی کہ یہ اعلیٰ درجہ کی طاقتیں
    بقیہ حاشیہ۔ ایک گوشہ میں موجود ہے تو میں کوشش کرتا کہ تا وہی دہلی میں تختؔ نشین ہو جاتا اور خاندان مغلیہ تباہ ہونے سے بچ جاتا۔ غرض مرزا صاحب مرحوم ایک مرد اولی العزم اور متقی اور غایت درجہ کے بیدار مغز اور اول درجہ کے بہادر تھے اگر اُس وقت مشیت الٰہی مسلمانوں کے مخالف نہ ہوتی تو بہت امید تھی کہ ایسا بہادر اور اولی العز م آدمی سکھوں کی بلند شورش سے پنجاب کا دامن پاک کر کے ایک وسیع سلطنت اسلام کی اس ملک میں قائم کر دیتا۔ جس حالت میں رنجیت سنگھ نے باوجود اپنی تھوڑی سی پدری ملکیت کے جو صرف نو گاؤں تھے تھوڑے ہی عرصہ میں اس قدر پیر پھیلا لئے تھے جو پشاور سے لدھیانہ تک خالصہ ہی خالصہ نظر آتا تھا اور ہر جگہ ٹڈیوں کی طرح سکھوں کی ہی فوجیں دکھائی دیتی تھیں تو کیا ایسے شخص کے لئے یہ فتوحات قیاس سے بعید تھیں؟ جس کی گمشدہ ملکیت میں سے ابھی چوراسی یا پچاسی گاؤںؔ باقی تھے اور ہزا ر کے قریب فوج کی جمعیت بھی تھی اور اپنی ذاتی شجاعت میں ایسے مشہور تھے کہ اُس وقت کی شہادتوں سے بہ بداہت ثابت ہوتا ہے کہ اس ملک میں اُن کا کوئی نظیرنہ تھا لیکن چونکہ خدائے تعالیٰ نے یہی چاہا تھا کہ مسلمانوں پر ان کی بے شمار غفلتوں کی وجہ سے تنبیہ نازل ہو اس لئے مرزا صاحب مرحوم اس ملک کے مسلمانوں کی ہمدردی میں کامیاب نہ ہو سکے اور میرزا صاحب مرحوم کے حالات عجیبہ میں سے ایک یہ ہے کہ مخالفین مذہب بھی ان کی نسبت ولایت کا گمان رکھتے تھے اور ان کی بعض خارق عادت امور عام طور پر دلوں میں نقش ہو گئے تھے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 164
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 164
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/164/mode/1up
    میری طرف سے نہیں بلکہ خدائے تعالیٰ کی طرف سے یہ ایک وحی ہے جو ہریک استعداد پر بحسب اُس کی حالت کے اُتر رہی ہے یعنیؔ صاف نظر آئے گا کہ جو کچھ انسانوں کے دل و دماغ کا م کررہے ہیں یہ ان کی طرف سے نہیں بلکہ ایک غیبی تحریک ہے کہ اُن سے یہ کام کرا رہی ہے سو اُس دن ہریک قسم کی قوتیں جوش میں دکھائی دیں گی دنیا پرستوں کی قوتیں فرشتوں کی تحریک سے جوش میں آکر اگرچہ بباعثؔ نقصان استعداد کے سچائی کی طرف رُخ نہیں کریں گی لیکن ایک قسم کا اُبال ان میں پیدا ہوکر اور انجماد اور افسردگی دور ہو کر اپنی معاشرت کے طریقوں میں عجیب قسم کی تدبیریں اور صنعتیں اور کَلیں ایجاد کرلیں گے اور نیکوں کی قوتوں میں خارق عادت طور پر الہامات اور مکاشفاؔ ت کا چشمہ صاف صاف طور پر بہتا نظر آئے گااور یہ بات شاذونادر ہو گی کہ مومن کی خواب جھوٹی نکلے تب انسانی قویٰ کے ظہور و برو ز کا دائرہ پورا ہو جائے گا اور جو کچھ
    بقیہ حاشیہ۔ یہ بات شاذو نادر ہوتی ہے کہ کوئی مذہبی مخالف اپنے دشمن کی کرامات کا قائل ہو لیکن اس راقم نے مرزا صاحب مرحوم کے بعض خوارق عادت اُن سکھوں کے مُنہ سے سنے ہیں جن کے باپ دادا مخاؔ لف گروہ میں شامل ہو کر لڑتے تھے۔ اکثر آدمیوں کا بیان ہے کہ بسا اوقات مرزا صاحب مرحوم صرف اکیلے ہزار ہزار آدمی کے مقابل پر میدا ن جنگ میں نکل کر اُن پر فتح پا لیتے تھے اور کسی کی مجال نہیں ہوتی تھی کہ اُن کے نزدیک آسکے اور ہر چند جان توڑکر دشمن کا لشکر کوشش کرتا تھا کہ توپوں یا بندوقوں کی گولیوں سے اُن کو مار دیں مگر کوئی گولی یا گولہ اُن پر کارگر نہیں ہوتا تھا۔ یہ کرامت اُن کی صدہا موافقین اور مخالفین بلکہ سکھوں کے مُنہ سے سُنی گئی ہے جنہوں نے اپنے لڑنے والے باپ دادوں سے سندًا بیان کی تھی۔ لیکن میرے نزدیک یہ کچھ تعجب کی بات نہیں اکثرلوگ ایک زمانہ دراز تک جنگی فوجوں میں نوکر رہ کر بہت سا حصہ اپنی عمر کا لڑائیوں میں بسر کرتے ہیں اور قدرت حق سے کبھی ایک خفیف سا زخم بھی تلوار یا بندوق کا اُن کے بدن کو نہیں پہنچتا۔ سو یہ کرامت اگر معقول طور پر بیان کی جائے کہ خدائے تعالیٰ اپنے خاص فضل سے دشمنوں کے حملوں سے انہیں بچاتا رہا تو کچھ حرج کی بات نہیں اس میں کچھ شکؔ نہیں ہو سکتا کہ مرز ا صاحب مرحوم دن کے وقت ایک پُرہیبت بہادر اور رات کے وقت ایک باکمال عا بد تھے اور معمور الاوقات اور متشرع تھے۔اُس زمانہ میں قادیان میں وہ نور اسلام چمک رہا تھا کہ ارد گرد کے مسلمان اس قصبہ کو مکّہ کہتے تھے۔ لیکن
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 165
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 165
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/165/mode/1up
    انسان کے نوع میں پوشیدہ طورپر ودیعت رکھا گیا تھاوہ سب خارج میں جلوہ ؔ گر ہو جائے گا تب خدائے تعالیٰ کے فرشتے ان تمام راستبازوں کو جو زمین کی چاروں طرفوں میں پوشیدہ طور پر زندگی بسر کر تے تھے ایک گروہ کی طرح اکٹھا کردیں گے اور دنیا پرستوں کا بھی کھلا کھلا ایک گروہ نظر آئے گا تا ہرایک گروہ اپنی کوششوں کےؔ ثمرات کو دیکھ لیویں تب آخر ہو جائے گی یہ آخری لیلۃ القدر کا نشان ہے جس کی بنا ابھی سے ڈالی گئی ہے جس کی تکمیل کے لئے سب سے پہلے خدائے تعالیٰ نے اس عاجزکو بھیجا ہے اور مجھے مخاطب کرکے فرمایا کہ انت اشد مناسبۃؔ بعیسی ابن مریم واشبہ الناس بہِ خُلْقًا و خَلْقًا و زمانًامگر یہ تاثیرات اس لیلۃ القدر کی اب بعد اس کے کم نہیں ہوں گی بلکہ باؔ لاتصال کام کرتی رہیں گی جب تک وہ سب کچھ پورا نہ ہو لے جو خدائے تعالیٰ آسمان پر مقرر کر چکاہے۔
    بقیہ حاشیہ۔ مرزاگل محمد صاحب مرحوم کے عہد ریاست کے بعد مرزا عطا محمد صاحب کے عہد ریاست میں جو اس عاجز کے دادا صاحب تھے یکدفعہ ایک سخت انقلاب آگیااور ان سکھوں کی بے ایمانی او ر بد ذاتی اور عہد شکنی کی وجہ سے جنہوں نے مخالفت کے بعد محض نفاق کے طور پر مصالحہ اختیار کر لیا تھا انواعِ اقسام کی مصیبتیں اُن پر نازل ہوئیں اور بجُز قادیان اور چند دیہات کے تمام دیہات اُن کے قبضہ سے نکل گئے۔ بالآخر سکھوں نے قادیان پر بھی قبضہ کر لیا اوردادا صاحب مرحوم معہ اپنے تمام لواحقین کے جلا وطن کئے گئے اُ س روز سکھوں نے پانچسو کے قریب قرآن شریف آگ سے جلا دیا اور بہت سی کتابیں چاک کر دیں اور مساجد میں سے بعض مسماؔ ر کیں بعض میں اپنے گھر بنائے اور بعض کو دھرم سالہ بنا کر قائم رکھاجو اب تک موجود ہیں اس فتنہ کے وقت میں جس قدر فقراء وعلماء وشرفا ونجباء قادیان میں موجود تھے سب نکل گئے او رمختلف بلاد وامصار میں جا کر آباد ہو گئے اور یہ جگہ اُن شریروں اور یزیدی الطبع لوگوں سے پُر ہوگئی جن کے خیالات میں بجز بدی اور بدکاری کے اورکچھ نہیں تھا پھر انگریزی سلطنت کے عہد سے کچھ عرصہ پہلے یعنی ان دنوں میں جبکہ رنجیت سنگھ کا عام تسلّط پنجاب پر ہو گیا تھا اس عاجز کے والد صاحب یعنی میرزا غلام مرتضیٰ صاحب مرحوم دوبارہ اس قصبہ میں آ کر آباد ہو ئے اور پھر بھی سکھو ں کی جو روجفا کی نیش زنی ہوتی رہی اُن دنوں میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 166
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 166
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/166/mode/1up
    اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے اپنے اُترنے کے لئے جو زمانہ انجیل میں بیان فرمایا ہے یعنی یہ کہ وہ حضرت نوح کے زماؔ نہ کی طرح امن اور آرام کا زمانہ ہو گا در حقیقت اسی مضمون پر سورۃ الزلزال جس کی تفسیر ابھی کی گئی ہے دلالت التزامی کے طور پر شہادت دے رہی ہے کیونکہ علوم و فنون کے پھیلنے اور انسانی عقول کی ترقیات کا زمانہ درحقیقت ایسا ہی چاہیئے جس میں غایت درجہؔ کا امن وآرام ہو کیونکہ لڑائیوں اور فسادوں اور خوف جان اور خلاف امن زمانہ میں ہر گز ممکن نہیں کہ لوگ عقلی و عملی امور میں ترقیات کر سکیں یہ باتیں تو کامل طور پر تبھی سوجھتی ہیں کہ جب کامل طور پر امن حاصل ہو۔
    ہمارؔ ے علماء نے جو ظاہری طور پر اس سور ۃ الزلزال کی یہ تفسیر کی ہے کہ درحقیقت
    بقیہ حاشیہ۔ ہم لوگ ایسے ذلیل وخوار تھے کہ ایک گائے کا بچہ جو دو یا ڈیڑھ روپے کو آسکتا ہے صدہا درجہ زیادہ ہماری نسبت بنظر عزت دیکھاجاتا تھا اور اس جانور کو ایک ادنیٰ خراش پہنچانے کی وجہ سے انسان کا خون کرنا مباح سمجھاگیاتھا صدہا آدمی ناکرد ہ گناہ صرف اس شک سےؔ قتل کئے جاتے تھے کہ انہوں نے اس جانور کے ذبح کرنے کا ارادہ کیا ہے اور ظاہر ہے کہ ایسی جاہل ریاست کہ جو حیوان کے قتل کے عوض انسان کو قتل کر ڈالنا اپنا فرض سمجھتی تھی اس لائق نہیں تھی کہ خدائے تعالیٰ بہت عرصہ تک اس کو مہلت دیتا اس لئے خدا ئے تعالیٰ نے اس تنبیہ کی صورت کو مسلمانوں کے سر پر سے بہت جلد اُٹھا لیا اور ابر رحمت کی طرح ہمارے لئے انگریزی سلطنت کو دُور سے لایااور وہ تلخی اور مرارت جو سکھوں کے عہد میں ہم نے اُٹھائی تھی گورنمنٹ برطانیہ کے زیر سایہ آکر ہم سب بھول گئے۔ اور ہم پر اور ہماری ذرّیّت پر یہ فرض ہو گیا کہ اس مبارک گورنمنٹ برطانیہ کے ہمیشہ شکر گذار رہیں۔ انگریزی سلطنت میں تین گاؤں تعلقداری اور ملکیت قادیان کا حصہ جدّی والد صاحب مرحوم کو ملے جو اَب تک ہیں اور حرّ اث کے لفظ کے مصداق کے لئے کافی ہیں۔ والد صاحب مرحوم اس ملک کے ممیّز زمیندؔ اروں میں شمارکئے گئے تھے گورنری دربارمیں اُن کو کُرسی ملتی تھی۔ اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 167
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 167
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/167/mode/1up
    زمین کو آخری دنوں میں سخت زلزلہ آئے گا اور وہ زلزلہ ایسا ہوگاکہ تمام زمین اُس سے زیرو زبر ہو جائے گی اور جو زمین کے اندر چیزیں ہیں وہ سب باہر آجائیں گی اور اؔ نسان یعنی کافر لوگ زمین کو پوچھیں گے کہ تجھے کیا ہوا تب اُس روز زمین باتیں کرے گی اور اپنا حال بتائے گی۔یہ سراسر غلط تفسیر ہے کہؔ جو قرآن شریف کے سیاق و سباق سے مخالف ہے۔اگر قرآن شریف کے اس مقام پر بنظر غور تدبّر کرو تو صاف ظاہر ہوتاہے کہ یہ دونوؔ ں سورتیں یعنی سورۃ البیّنہ اور سورۃ الزلزال،سورۃ لیلۃ القدرکے متعلق ہیں اور آخری زمانہ تک اس کا کل حال بتلا رہی ہیں ماسوا ؔ اس کے کہ ہریک عقل سلیم سوچ سکتی ہے کہ ایسے بڑے زلزلہ کے وقت میں کہ جب ساری زمین تہ و بالا ہو جائے گی ایسے کافر کہاں
    بقیہ حاشیہ۔گورنمنٹ برطانیہ کے وہ سچے شکر گذار اور خیر خواہ تھے ۱۸۵۷ء کے غدر کے ایا م میں پچاس گھوڑے انہوں نے اپنے پاس سے خرید کر اور اچھے اچھے جوان مہیا کر کے پچاس سوار بطور مدد کے سرکار کودئے اس وجہ سے وہ اس گورنمنٹ میں بہت ہر دل عزیز تھے اور گورنمنٹ کے اعلیٰ حکام دلجوئی کے ساتھ اُن کو ملتے تھے بلکہ بسا اوقات صاحبان ڈپٹی کمشنر وکمشنر مکان پر آکر اُن کی ملاقات کرتے تھے۔ اس تمام تقریر سے ظاہر ہے کہ یہ خاندان ایک معزز خاندان زمینداری ہے جو شاہان سلف کے زمانہ سے آج تک آثارعزت کسی قدر موجود رکھتا ہے فالحمد للّٰہ الّذی اثبت ھذہ العلامۃ اثباتًا بیّنًا واضحًا من عندہٖ۔
    اور چوتھی اورپانچویں علامت کی تصریح کچھ ضروری نہیں خود ظاہرہے اور قادیان کو جو خدائے تعالیٰ نے دمشق کے ساتھ مشابہت دی اور یہ بھی اؔ پنے الہام میں فرمایا کہ اخرج منہ الیزیدیون یہ تشبیہ بوجہ ان مُلحدوں اور شریروں کے ہے جو اس قصبہ میں رہتے ہیں کیونکہ ا س قصبہ میں اکثر ایسے لوگ بھرے ہوئے ہیں جن کو موت یاد نہیں۔ دن رات دنیا کے فریبوں اور مکروں میں لگے ہوئے ہیں۔ اگر انتظام گورنمنٹ انگریزی مانع نہ ہو تو ان لوگوں کے دل ہریک جرم کے کرنے کو طیارہیں الّا ماشاء اللہ ان میں سے ایسے بھی ہیں کہ جو خدائے تعالیٰ کے وجود سے بکلّی منکر ہیں اور کسی چیز کو حرام نہیں سمجھتے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 168
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 168
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/168/mode/1up
    زندہ رہیں گے۔جوؔ زمین سے اُس کے حالات استفسار کریں گے کیا ممکن ہے کہ زمین تو ساری زیر و زبر ہو جائے یہاں تک کہ اُوپر کا طبقہ اندر اور اندر کا طبقہ باہر آجاؔ ئے اور پھر لوگ زند ہ بچ رہیں بلکہ اس جگہ زمین سے مراد زمین کے رہنے والے ہیں اور یہ عام محاورہ قرآن شریف کا ہے کہ زمین کے لفظ سے انساؔ نوں کے دل اور ان کے باطنی قویٰ مراد ہوتے ہیں جیساکہ اللہ جل شَانُہٗ ایک جگہ فرماتاہے
    اور جیساکہ فرماتاہے اِعْلَمُوْا اَنَّ اللّٰهَ يُحْىِ الْاَرْضَ بَعْدَ مَوْتِهَا‌ؕ ۱؂۔
    وَالْبَلَدُ الطَّيِّبُ يَخْرُجُ نَبَاتُهٗ بِاِذْنِ رَبِّهٖ‌ۚ وَالَّذِىْ خَبُثَ
    بقیہ حاشیہ۔ مَیں اُن کے دلوں کو دیکھتا ہوں کہ زنا سے لے کر خون ناحق تک اگر موقعہ پاویں اُن کے نزدیک نہ صرف جائزبلکہ یہ سب کام تعریف کے لائق ہیں۔ میں اُن کے نزدیک شاید تمام دنیا سے بدترہوں مگر مجھے افسوس نہیں میرے روحانی بھائی مسیح کا قول مجھے یادآتا ہے کہ نبی بے عزت نہیں مگر اپنے وطن میں۔ میں سچ سچ کہتا ہوں کہ اگریہ لوگ امام حسینؓ کاوقت پاتے تو میرے خیال میں ہے کہ یزید اور شمر سے پہلے ان کاقدم ہوتا اورؔ اگرمسیح کے زمانہ کو دیکھتے تو اپنی مکاریوں میں یہودا اسکریوطی کوپیچھے ڈال دیتے۔ خدائے تعالیٰ نے جو اِن کو یزیدیوں سے مناسبت دی تو بے وجہ نہیں دی اُس نے ان کے دلوں کو دیکھا کہ سیدھے نہیں اُن کے چلن پر نظرڈالی کہ درست نہیں تب اس نے مجھے کہا کہ یہ لوگ یزیدی الطبع ہیں اور یہ قصبہ دمشق سے مشابہ ہے۔ سوخدائے تعالیٰ نے ایک بڑے کام کے لئے اس دمشق میں اس عاجز کو اُتارا بطرفٍ شرقیٍ عند المنارۃ البیضاء من المسجد الذی من دخلہ‘ کان آمِنًا فتبارک الذی انزلنی فی ھذا المقام والسلام علٰی رسُولہ افضل الرّسل وخیر الانام۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 169
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 169
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/169/mode/1up
    لَا يَخْرُجُ اِلَّا نَكِدً۱ ؂۱
    ایساہی قرآن شریف میں بیسیوں نظیریں موجود ہیں جو پڑھنے ؔ والوں پر پوشیدہ نہیں ماسوا اس کے روحانی واعظوں کا ظاہر ہونا اور ان کے ساتھ فرشتوں کا آنا ایک روحانی قیامت کا نمونہ ہوتا ہے جس سے مردوں میں حرکت پیداہو جاتی ہے اور جو قبروں کے اندر ہیں وہ باہر آجاتے ہیں اور نیک اور بد لوگ اپنی سزاجزاپالیتے ہیں سو اگر سورۃ الزلزال کو قیامت کے آثار میں سے قرار دیا جائے تو اس میں بھی کچھ شک نہیں کہ ایسا وقت روحانی طور پر ایک قسم کی قیامت ہی ہوتی ہے خدائے تعالیٰ کے تائید یافتہ بندے قیامت کا ہی رُوپ بن کر آتے ہیں اور انہیں کا وجود قیامت کے نام سے موسوم ہو سکتاہے جن کے آنے سے روحانی مردے زندہ ہو نے شروع ہو جاتے ہیں اور نیز اس میں بھی کچھ شک نہیں کہ جب ایسازمانہ آجائے گا کہ تمام انسانی طاقتیں اپنے کمالات کو ظاہر کر دکھائیں گی اور جس حد تک بشری عقول اور افکار کاپرواز ممکن ہے اُس حد تک وہ پہنچ جائیں گی اور جن مخفی حقیقتوں کو ابتدا سے ظاہر کرنا مقدّر ہے وہ سب ظاہر ہو جائیں گی تب اس عالم کا دائرہ پوراہو کر یک دفعہ اس کی صف لپیٹ دی جائے گی۔
    کُلُّ شَیْ ءٍ فَانٍ
    ہمارؔ امذہب
    زعشاق فرقان و پیغمبریم
    بدیں آمدیم و بدیں بگذریم
    ہمارے مذہب کا خلاصہ اور لب لباب یہ ہے کہ لاالٰہ الّا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ ہمارااعتقادجو ہم اس دنیوی زندگی میں رکھتے ہیں جس کے ساتھ ہم بفضل و توفیق باری تعالیٰ اس عالم گذران سے کوچ کریں گے یہ ہے کہ حضرت سیدنا و مولانا محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم
    ۱؂ الاعراف:۵۹
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 170
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 170
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/170/mode/1up
    خاتم النبیّین و خیر المرسلین ہیں جن کے ہاتھ سے اکمال دین ہو چکا اوروہ نعمت بمرتبہ اتمام پہنچ چکی جس کے ذریعہ سے انسان راہ راست کو اختیار کر کے خدائے تعالیٰ تک پہنچ سکتا ہے اور ہم پختہ یقین کے ساتھ اس بات پر ایمان رکھتے ہیں کہ قرآن شریف خاتم کتب سماوی ہے اور ایک شُعشہ یا نقطہ اس کی شرائع اور حدود اور احکام اور اوامر سے زیادہ نہیں ہو سکتااور نہ کم ہو سکتا ہے اور اب کوئی ایسی وحی یا ایسا الہام منجانب اللہ نہیں ہو سکتاجو احکا مؔ فرقانی کی ترمیم یا تنسیخ یا کسی ایک حکم کے تبدیل یا تغییر کر سکتا ہو اگر کوئی ایسا خیال کرے تو وہ ہمارے نزدیک جماعت مومنین سے خارج اور مُلحد اور کافرہے اور ہمار ااس بات پر بھی ایمان ہے کہ ادنیٰ درجہ صراط مستقیم کا بھی بغیر اتباع ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ہرگز انسان کو حاصل نہیں ہو سکتا چہ جائیکہ راہِ راست کے اعلیٰ مدارج بجُز اقتدا اُس امام الرّسل کے حاصل ہو سکیں کوئی مرتبہ شرف و کمال کا اور کوئی مقام عزت اور قرب کا بجز سچی اور کامل متابعت اپنے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ہم ہرگز حاصل کر ہی نہیں سکتے۔ہمیں جو کچھ ملتاہے ظلّی اور طفیلی طور پر ملتا ہے اور ہم اس بات پر بھی ایمان رکھتے ہیں کہ جو راستباز اور کامل لوگ شرف صحبت آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے مشرف ہو کر تکمیل منازل سلوک کرچکے ہیں اُن کے کمالات کی نسبت بھی ہمارے کمالات اگر ہمیں حاصل ہوں بطور ظل کے واقع ہیں اور اُن میں بعض ایسے جُزئی فضائل ہیں جو اَب ہمیں کسی طرح سے حاصل نہیں ہوسکتے۔غرض ہمارا اُن تمام باتوں پر ایمان ہے جو قرآن شریف میں درج ہیں اور جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم خدائے تعالیٰ کی طرف سے لائے اور تمام محدثات اور بدعات کوؔ ہم ایک فاش ضلالت اور جہنم تک پہنچانے والی راہ یقین رکھتے ہیں مگر افسوس کہ ہماری قوم میں ایسے لوگ بہت ہیں جو بعض حقائق اور معارف قرآنیہ اور دقائق آثار نبویہ کو جو اپنے وقت پر بذریعہ کشف و الہام زیادہ تر صفائی سے کھلتے ہیں محدثات اور بدعات میں ہی داخل کر لیتے ہیں حالانکہ معارف مخفیہ قرآن و حدیث ہمیشہ اہل کشف پر کھلتے رہے ہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 171
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 171
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/171/mode/1up
    اور علماء وقت اُن کو قبول کرتے رہے ہیں لیکن اس زمانہ کے اکثر علماء کی یہ عجیب عادت ہے کہ اگر خدائے تعالیٰ کا الہام ولایت جس کا کبھی سلسلہ منقطع نہیں اپنے وقت پر بعض مجمل مکاشفات نبویہ اور استعارات سر بستہ قرآنیہ کی کوئی تفسیر کرے تو بنظر انکار و استہزاء اُس کو دیکھتے ہیں حالانکہ صحاح میں ہمیشہ یہ حدیث پڑھتے ہیں کہ قرآن شریف کے لئے ظہر و بطن دونوں ہیں اور اس کے عجائبات قیامت تک ختم نہیں ہو سکتے اور ہمیشہ اپنے مُنہ سے اقرار کرتے ہیں کہ اکثر اکابر محدثین کشوف و الہامات اولیاء کو حدیث صحیح کے قائم مقام سمجھتے رہے ہیں۔
    ہم نے جو رسالہ فتح اسلام اور توضیح مرام میں اس اپنے کشفی و الہامی امر کو شائع کیا ہے کہ مسیح موعود سے مراد یہی عاجز ہے میں نے سُنا ؔ ہے کہ بعض ہمارے علماء اس پر بہت افروختہ ہوئے ہیں اور انہوں نے اس بیان کو ایسی بدعات میں سے سمجھ لیاہے کہ جو خارج اجماع اور برخلاف عقیدہ متفق علیہا کے ہوتی ہیں حالانکہ ایساکرنے میں اُن کی بڑی غلطی ہے۔
    اول تو یہ جاننا چاہیئے کہ مسیح کے نزول کا عقیدہ کوئی ایسا عقیدہ نہیں ہے جو ہماری ایمانیات کی کوئی جُز یا ہمارے دین کے رُکنوں میں سے کوئی رُکن ہو بلکہ صد ہا پیشگوئیوں میں سے یہ ایک پیشگوئی ہے جس کو حقیقت اسلام سے کچھ بھی تعلق نہیں۔جس زمانہ تک یہ پیشگوئی بیان نہیں کی گئی تھی اُس زمانہ تک اسلام کچھ ناقص نہیں تھا اور جب بیان کی گئی تو اس سے اسلام کچھ کامل نہیں ہو گیا اور پیشگوئیوں کے بارہ میں یہ ضروری نہیں کہ وہ ضرور اپنی ظاہری صورت میں پوری ہوں بلکہ اکثر پیشگوئیوں میں ایسے ایسے اسرار پوشیدہ ہوتے ہیں کہ قبل از ظہور پیشگوئی خود انبیاء کو ہی جن پر وہ وحی نازل ہو سمجھ میں نہیں آسکتے چہ جائیکہ دوسرے لوگ ان کو یقینی طور پر سمجھ لیویں دیکھو جس حالت میں ہمارے سید و مولیٰ آپ اس بات کا اقرار کرتے ہوں کہؔ بعض پیشگوئیوں کو میں نے کسی اور صورت پر سمجھااور ظہور اُن کا کسی اور صورت پر ہوا تو پھر دوسرے لوگ گو فرض کے طور پر ساری اُمت ہی کیوں نہ ہو کب ایسادعویٰ کر سکتے ہیں کہ ہماری سمجھ میں غلطی نہیں سلف صالح ہمیشہ اس طریق کو پسند کرتے رہے ہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 172
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 172
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/172/mode/1up
    کہ بطور اجمالی پیشگوئی پر ایمان لے آویں اور اس کی تفصیل یااس بات کو کہ وہ کس طور سے ظہور پذیر ہو گی حوالہ بخداکریں اور میں پہلے بھی لکھ چکا ہوں کہ اقرب بامن جس سے ایمان سلامت رہ سکتاہے یہی مذہب ہے کہ محض الفاظ پیشگوئی پر زور نہ ڈالا جائے اور تحکم کی راہ سے یہی دعوےٰ نہ کیا جائے کہ ضرور اس کا ظہور ظاہری صورت پر ہی ہو گا کیونکہ اگر خدانخواستہ انجام کار ایسانہ ہوا تو پھر پیشگوئی کی صداقت میں طرح طرح کے شکوک پیداہو کر ایمان ہاتھ سے گیا ایسی کوئی وصیت پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے ہرگز ثابت نہیں ہو سکتی کہ تم نے پیشگوئیوں کو ظاہر پر حمل کرتے رہنا کسی استعار ہ یا تاویل وغیرہ کو ہرگز قبول نہ کرنا۔اب سمجھنا چاہیئے کہ جب کہ پیشگوئیوں کے سمجھنے کے بارہ میں خود انبیاء سے امکان غلطی ہے تو پھر اُمت کا کوراؔ نہ اتفاق یا اجماع کیا چیز ہے۔
    ماسوااس کے ہم کئی دفعہ بیان کرآئے ہیں کہ اس پیشگوئی پر اجماع اُمت بھی نہیں۔قرآن شریف قطعی طور پر اپنی آیات بیّنات میں مسیح کے فوت ہو جانے کاقائل اور ہمیشہ کے لئے اُس کو رخصت کرتاہے۔بخاری صاحب اپنی صحیح میں صرف امامکم منکم کہہ کر چُپ ہو گئے ہیں یعنی صحیح بخاری میں صرف یہی مسیح کی تعریف لکھی ہے کہ وہ ایک شخص تم میں سے ہو گا اور تمہار اامام ہو گا۔ہاں دمشق میں عندالمنارہ اُترنے کی حدیث مسلم میں موجود ہے مگر اس سے اجماع اُمت ثابت نہیں ہو سکتا بلکہ یہ بھی ثابت ہونا مشکل ہے کہ مسلم کا درحقیقت یہی مذہب تھا کہ دمشق کے لفظ سے سچ مچ یہی دمشق مراد ہے اور اگر ایسا فرض بھی کرلیں تو فقط ایک شخص کی رائے ثابت ہوئی مگر پیشگوئیوں کے بار ہ میں جبکہ خدائے تعالیٰ کے پاک نبیوں کی رائے اجتہادی غلطی سے معصوم نہیں رہ سکتی تو پھر مسلم صاحب کی رائے کیوں کر معصوم ٹھہرے گی۔
    میں پھر دوبارہ کہتاہوں کہ اس بارہ میں عام خیال مسلمانوں کا گوؔ اُن میں اولیاء بھی داخل ہوں اجماع کے نام سے معصوم۱؂ نہیں ہو سکتا مسلمانوں نے صورت پیشگوئیوں کو مان لیا ہے اُن کی طرف سے یہ ہرگز دعویٰ نہیں اور نہ ہونا چاہیئے کہ خدائے تعالیٰ اس بات پر قادر نہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 173
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 173
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/173/mode/1up
    کہ شائد اس پیشگوئی کی ایسی تفاصیل مخفی ہوں جو اب تک کھلی نہیں درحقیقت تمام انبیاء کا یہی مذہب رہا ہے کہ وہ پیشگوئی کی اصل حقیقت کو خدائے تعالیٰ کے وسیع علم پر چھوڑتے رہے ہیں اسی وجہ سے وہ مقدس لوگ باوجود بشارتوں کے پانے کے پھر بھی دعاسے دستبردار نہیں ہوتے تھے جیساکہ بدر کی لڑائی میں فتح کا وعدہ دیاگیاتھا مگر ہمارے سیّد و مولیٰ رو رو کر دعائیں کرتے رہے اس خیال سے کہ شاید پیشگوئی میں کوئی ایسے امور مخفی ہوں یا وہ کچھ ایسے شروط کے ساتھ وابستہ ہوں جن کا علم ہم کو نہیں دیاگیا۔
    اور یہ دعویٰ کہ تمام صحابہ اور اہل بیت اسی طرح مانتے چلے آئے ہیں جیساکہ ہم۔ یہ بالکل لغو اور بلا دلیل ہے فردفرد کی رائے کا خداہی کو علم ہو گا کسی نے اُن سب کے اظہارات لکھ کر کب قلمبند کئےؔ ہیں یا کب کسی نے اپنے مُنہ سے اُن کے بیانات سُن کر شائع کئے ہیں باوجودیکہ صحابی دس ہزا ۱۰۰۰۰ر سے بھی کچھ زیادہ تھے مگر اس پیشگوئی کے روایت کرنے والے شاید دو یا تین تک نکلیں تو نکلیں اور ان کی روایت بھی عام طور پر ثابت نہیں ہوتی کیونکہ بخاری جو حدیث کے فن میں ایک ناقد بصیرہے اُن تمام روایات کو معتبر نہیں سمجھتایہ خیال ہرگزنہیں ہو سکتاکہ بخاری جیسے جدوجہد کرنے والے کو وہ تمام روایات رطب و یابس پہنچی ہی نہیں بلکہ صحیح اور قرین قیاس یہی ہے کہ بخاری نے اُن کو معتبر نہیں سمجھا اُس نے دیکھاکہ دوسری حدیثیں اپنی ظاہری صورت میں امامکم منکم کی حدیث سے معارض ہیں اور یہ حدیث غایت درجہ کی صحت پر پہنچ گئی ہے اِس لئے اُس نے اِن مخالف المفہوم حدیثوں کو ساقط الا عتبار سمجھ کر اپنی صحیح کو اُن سے پُر نہیں کیا۔
    اب ناظرین سمجھ سکتے ہیں کہ ہرگز خیر القرون کا اس امر پر اجماع ثابت نہیں ہو سکتا کہ ضرور حضرت مسیح دمشق میں ہی نازل ہوں گے کیونکہ بخاری امام فن نے اس حدیث کو نہیں لیا ابن ماجہ اس حدیث کا مخالفؔ ہے اوربجائے دمشق کے بیت المقدس لکھتا ہے اسی طرح کسی کے مُنہ سے کچھ نکل رہا ہے اور کسی کے مُنہ سے کچھ پس اجماع کہاں ہے ؟
    اگر فرض کے طور پر اجماع بھی ہوتا تو پھر بھی کیا حرج تھا کیونکہ ان بزرگوں نے کب
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 174
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 174
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/174/mode/1up
    دعویٰ کیا ہے کہ اس سے بڑھ کر اور معنے نہیں ہو سکتے بلکہ وہ تو مسنون طور پر تفاصیل کو حوالہ بخداکرتے رہے ہیں۔
    پھر یہ بھی ہم بخوبی ظاہر کر چکے ہیں کہ اس پیشگوئی کو صرف ظاہری الفاظ تک محدود رکھنے میں بڑی بڑ ی مشکلات ہیں قبل اس کے جو مسیح آسمان سے اُترے صدہا اعتراض پہلے ہی سے اُتر رہے ہیں ان مشکلات میں پڑنے کی ضرورت ہی کیا ہے اور ہمیں اس بات کی کیا حاجت کہ ابن مریم کو آسمان سے اُتاراجائے اور ان کا نبوت سے الگ ہونا تجویزکیاجائے اور ان کی اس طرح پر تحقیر کی جائے کہ دوسراشخص امامت کرے اور وہ پیچھے مقتدی بنیں اور دوسراشخص اُن کے روبرو لوگوں سے بیعت امامت و خلافت لے اور وہ بدیدۂ حسرت دیکھتے رہیں اور احد المسلمین بن کر اپنی نبوت کا دم نہ مار سکیں اورؔ ہم اس قریب الشرک بلکہ سراسر شرک سے بھرے ہوئے کلمے کو کیوں مُنہ سے بولیں کہ دجّال یک چشم خدائے تعالیٰ کی طرح اپنے اقتدار سے مُردوں کو زندہ کرے گا اور صریح صریح خدائی کی علامتیں دکھلادے گا اور کوئی اسے یہ نہیں کہے گا کہ اے یک چشم خدا پہلے تُو اپنی آنکھ درست کر۔ کیا وہ توحید جو اسلام نے ہمیں سکھائی ہے ایسی قدرتیں کسی مخلوق میں روارکھتی ہے کیا اسلام نے اِن واہیات باتوں کو اپنے پَیروں کے نیچے کچل نہیں دیا عجیب بات ہے کہ مسلمانوں کے نزدیک خر دجّال بھی گویا ایک حصہ خدائی کا رکھتا ہے اور کہتے ہیں کہ اُس خَر کا پیدا کرنے والا دجّال ہی ہے۔ پھر جبکہ وہ دجّال مُحیی و ممیت اور خالق بھی ہے تو اس کے خدا ہونے میں کسر کیا رہ گئی؟ اور اس گدھے کی یہ تعریف کرتے ہیں کہ وہ مشرق و مغرب میں ایک روز میں سیر کرسکے گا مگر ہمارے نزدیک ممکن ہے کہ دجّال سے مراد بااقبال قومیں ہوں اور گدھا اُن کا یہی ریل ہو جو مشرق اور مغرب کے ملکوں میں ہزار ہا کوسوں تک چلتے دیکھتے ہو۔ پھر مسیح کے بارہ میں یہ بھی سوچنا چاہیئے کہ کیا طبعی اورفلسفی لوگ اس خیال پر نہیں ہنسیں گے کہ جبکہ تیس یا چالیس ہزار فٹ تک زمین سے اوپر کی طرف جانا موتؔ کا موجب ہے توحضرت مسیح اس جسم عنصری کے ساتھ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 175
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 175
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/175/mode/1up
    آسمان تک کیوں کر پہنچ گئے اور کیا یہ مخالفوں کے لئے ہنسنے کی جگہ نہیں ہوگی کہ حلیہ اول اور اخیر کے اختلاف کی وجہ یہ بیان کی جائے کہ تغیر عمر کے سبب سے حُلیہ میں فرق آگیا ہو گا۔
    ایک اور بات ہمارے علماء کے لئے غور کے لائق ہے کہ احادیث میں صرف ایک دجّال کا ذکر نہیں بلکہ بہت سے دجّال لکھے ہیں اور لِکُلِّ دَجَّالٍ عِیْسٰی کی مثال پر تد بر کی نظر ڈال کر یہ بات بآسانی سمجھ آسکتی ہے کہ عیسیٰ کے لفظ سے مثیل عیسیٰ مراد ہونا چاہیئے اس ہماری بات کو وہ حدیث اور بھی تائید دیتی ہے جو مثیل مصطفےٰ کی نسبت ایک پیشگوئی ہے جس کو دوسرے لفظوں میں مہدی کے نام سے موسوم کرتے ہیں کیونکہ اس حدیث میں ایسے لفظ ہیں جن سے بصراحت یہ پایا جاتا ہے کہ آنحضرت صلے اللہ علیہ وسلم پیشگوئی میں اپنے ایک مثیل کی خبر دے رہے ہیں کیونکہ وہ فرماتے ہیں کہ وہ مہدی خُلق اور خَلق میں میری مانند ہوگا یُوَاطِئُ اِسْمُہٗ اِسْمِیْ وَاِسْمُ اَبِیْہِ اِسْمَ اَبِیْ یعنی میرے نام جیسا اس کا نام ہوگا اور میرے باپ کے نا مؔ کی طرح اُس کے باپ کا نام۔اب دیکھو کہ خلاصہ اس حدیث کا یہی ہے کہ وہ میرا مثیل ہوگا اس صورت میں ایک دانا کو نہایت آسانی سے یہ بات سمجھ آسکتی ہے کہ جیسے حدیث میں ایک مثیل مصطفےٰ کا ذکر ہے ایسا ہی مثیل مسیح کا ذکر بھی ہے نہ یہ کہ ایک جگہ مثیل مصطفےٰ اور دوسری جگہ خود حضرت مسیح ہی آجائیں گے۔فتدبّر۔
    اب ظاہر ہے کہ جس قدر ہم نے اپنے الہامی عقیدہ کی تائید میں دلائل عقلی و نقلی و شرعی لکھے ہیں وہ ہمارے اثبات مدعا کے لیے کافی ہیں اور اگر اس جگہ ہم بطور فرض محال تسلیم بھی کر لیں کہ ہم بکلی شبہات پیش آمدہ کا تصفیہ نہیں کرسکے تو اس میں بھی ہمارا کچھ حرج نہیں کیونکہ الہام الٰہی و کشف صحیح ہمارامؤ یّد ہے اس لئے اسی قدر ہمارے لئے کافی ہے۔ ایک متدیّن عالم کا یہ فرض ہونا چاہئے کہ الہام اور کشف کا نام سُن کر چُپ ہو جائے اور لمبی چون وچرا سے باز آجائے اگر مخالف الرائے لوگوں کے ہاتھ میں بعض احادیث کی رُو سے کچھ دلائل ہیں تو ہمارے پاس ایسے نقلی و شرعی دلائل ان سے کچھ تھوڑے نہیں۔ قرآن شریف
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 176
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 176
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/176/mode/1up
    ہمارے ساتھ ہے اُن کے سا تھؔ نہیں۔ صحیح بخاری کی حدیثیں ہماری مؤ یّد ہیں ان کی مؤیّد نہیں۔ علاوہ اس کے معقولی دلائل جو تجارب فلسفہ و طبعیہ سے لئے گئے ہیں وہ سب ہمارے پاس ہیں اُن کے پاس ایک بھی نہیں اور ان تمام امور کے بعد الہام ربّانی و کشف آسمانی ہمارے بیان کا شاہد ہے اور اُن کے پاس اس اصرار پر کوئی ایسا شاہد نہیں۔
    اس جگہ ہم اس بات کا لکھنا بے محل نہیں سمجھتے کہ الہام اور کشف کی حجت اور دلیل ہونے کے قائل اگرچہ بعض خشک متکلّمین اور اصولی نہ ہوں لیکن ایسے تمام محدّث اور صوفی جو معرفت کامل اور تفقّہ تام کے رنگ سے رنگین ہوئے ہیں بذوق تمام قائل ہیں اس بارے میں ہمارے دوست مولوی ابو سعید محمد حسین صاحب بٹالوی نے اپنے رسالہ اشاعت السنہ نمبر۱۱جلد ۷ میں بہ بسط تمام بیان فرمایا ہے۔ چنانچہ از انجملہ امام عبد الوھاب شعرانی کی کتاب میزان کبریٰ اور فتوحات شیخ محی الدین کا جو مولوی صاحب موصوف نے بتائید اپنی رائے کے ذکر کیا ہے اُن میں سے ہم کسی قدر ناظرین کے لئے لکھتے ہیں۔
    امام صاحب اپنی کتاب میزان کے صفحہ ۱۳ میں فرماتے ہیں کہ صاؔ حب کشف مقام یقین میں مجتہدین کے مساوی ہوتا ہے اور کبھی بعض مجتہدین سے بڑھ جاتا ہے کیونکہ وہ اُسی چشمہ سے چلّو بھرتا ہے جس سے شریعت نکلتی ہے۔
    اور پھر امام صاحب اس جگہ یہ بھی فرماتے ہیں کہ صاحب کشف اُن علوم کا محتاج نہیں جو مجتہدوں کے حق میں اُن کی صحت اجتہاد کے لئے شرط ٹھہرائے گئے ہیں اور صاحب کشف کا قول بعض علماء کے نزدیک آیت اور حدیث کے مانند ہے۔
    پھر صفحہ ۳۳ میں فرماتے ہیں کہ بعض حدیثیں محدثین کے نزدیک محل کلام ہوتی ہیں مگر اہل کشف کو اُن کی صحت پر مطلع کیا جاتا ہے جیسا کہ اصحابی کالنجوم کی حدیث محدثین کے نزدیک جرح سے خالی نہیں مگر اہل کشف کے نزدیک صحیح ہے۔
    پھر صفحہ ۳۴ میں فرماتے ہیں کہ ہمارے پاس کوئی ایسی دلیل نہیں جو کلام اہل کشف کو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 177
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 177
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/177/mode/1up
    رَدّ کرے نہ عقلی نہ نقلی و شرعی۔ کیونکہ کشف کی خود شریعت مؤید ہے۔
    پھر صفحہ ۴۸ میں فرماتے ہیں کہ بہتیرے اولیاء اللہ سے مشتہر ہوؔ چکا ہے کہ وہ آنحضرت صلعم سے عالم ارواح میں یا بطور کشف ہم مجلس ہوئے اور اُن کے ہمعصروں نے اُن کے دعوے کو تسلیم کیا۔
    پھر امام شعرانی صاحب نے ان لوگوں کے نام لئے ہیں جن میں سے ایک امام محدث جلال الدین سیوطی بھی ہیں اور فرماتے ہیں کہ میں نے ایک ورق جلال الدین سیوطی کا دستخطی اُن کے صحبتی شیخ عبد القادر شاذلی کے پاس پایا جو کسی شخص کے نام خط تھا جس نے اُن سے بادشاہ وقت کے پاس سفارش کی درخواست کی تھی سو امام صاحب نے اس کے جواب میں لکھا تھا کہ میں نے آنحضرت صلعم کی خدمت میں تصحیح احادیث کے لئے جن کو محدثین ضعیف کہتے ہیں حاضر ہوا کرتا ہوں چنانچہ اس وقت تک پچہتر دفعہ حالت بیداری میں حاضر خدمت ہوچکا ہوں اگر مجھے یہ خوف نہ ہوتا کہ میں بادشاہ وقت کے پاس جانے کے سبب اس حضوری سے رُک جاؤں گا تو قلعہ میں جاتا اور تمہاری سفارش کرتا۔
    شیخ محی الدین ابن عربی نے جو فتوحات میں اس بارے میں لکھا ہے اُس میں سے بطور خلاصہ یہ مضمون ہے کہ اہل ولایت بذریعہ کشف آنحضرت صلعم سے احکام پوچھتے ہیں اور اُن میں سے جب کسی کو کسی واقعہ میںؔ حدیث کی حاجت پڑتی ہے تو وہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت سے مشرف ہوجاتا ہے پھر جبرائیل علیہ السلام نازل ہوتے ہیں۔ اور آنحضرتؐ جبرائیل سے وہ مسئلہ جس کی ولی کو حاجت ہوتی ہے پوچھ کر اُس ولی کو بتا دیتے ہیں یعنی ظلّی طور پر وہ مسئلہ بہ نزول جبرائیل منکشف ہوجاتاہے۔ پھر شیخ ابن عربی نے فرمایا ہے کہ ہم اس طریق سے آنحضرت صلعم سے احادیث کی تصحیح کرالیتے ہیں بہتیری حدیثیں ایسی ہیں جو محدثین کے نزدیک صحیح ہیں اور وہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 178
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 178
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/178/mode/1up
    ہمارے نزدیک صحیح نہیں اور بہتیری حدیثیں موضوع ہیں اور آنحضرت کے قول سے بذریعہ کشف کے صحیح ہوجاتی ہیں۔ تَمَّ کَلَامُہٗ
    اور فتوحات مکّیہ میں ابن عربی صاحب نے یہ بھی فرمایا ہے کہ اہل ذکر و خلوت پر وہ علوم لدُنیہ کھلتے ہیں جو اہل نظر و استدلال کو حاصل نہیں ہوتے اور یہ علوم لدنیہ اور اسرار و معارف انبیاء و اولیاء سے مخصوص ہیں اور جنید بغدادی سے نقل کیا ہے کہ انہوں نے تیس سال اس درجہ میں رہؔ کر یہ رُتبہ حاصل کیا ہے اور ابویزید بُسطامی سے نقل کیا ہے کہ علماء ظاہر نے علم مُردوں سے لیا ہے اور ہم نے زندہ سے جو خدائے تعالیٰ ہے۔ تَمَّ کَلَامُہٗ
    ایسا ہی مولوی ابوسعید محمد حسین صاحب نے رئیس مُحدّثین حضرت شاہ ولی اللہ قدس سرّہٗ کے کلمات قُدسیہ اس بارہ میں بہت کچھ لکھے ہیں اور دوسرے علماء و فقراء کی بھی شہادتیں دی ہیں مگر ہم اُن سب کو اس رسالہ میں نہیں لکھ سکتے اور نہ لکھنے کی کچھ ضرورت ہے الہام اور کشف کی عزت اور پایۂ عالیہ قرآن شریف سے ثابت ہے وہ شخص جس نے کشتی کو توڑا اور ایک معصوم بچہ کو قتل کیا جس کا ذکر قرآن شریف میں ہے وہ صرف ایک ملہم ہی تھا نبی نہیں تھا۔ الہام اور کشف کا مسئلہ اسلام میں ایسا ضعیف نہیں سمجھا گیا کہ جس کا نورانی شعلہ صرف عوام الناس کے مُنہ کی پھونکوں سے مُنطفی ہوسکے یہی ایک صداقت تو اسلام کے لیے وہ اعلیٰ درجہ کا نشان ہے جو قیامت تک بے نظیر شان و شوکت اسلام کی ظاہر کررہاہے یہی تو وہ خاص برکتیں ہیں جو غیر مذہب والوں میں پائی نہیں جاتیں۔ ہمارے علماء اس الہام کے مخالفؔ بن کر احادیث نبویہ کے مکذب ٹھہرتے ہیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے کہ ہرایک صدی پر ایک مُجدّد کا آنا ضروری ہے اب ہمارے علماء کہ جو بظاہر اتباع حدیث کا دم بھرتے ہیں انصاف سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 179
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 179
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/179/mode/1up
    بتلاویں کہ کس نے اس صدی کے سر پر خدائے تعالیٰ سے الہام پاکر مُجدّد ہونے کادعویٰ کیا ہے یوں تو ہمیشہ دین کی تجدید ہورہی ہے مگر حدیث کا تو یہ منشاء ہے کہ وہ مجدد خدائے تعالیٰ کی طرف سے آئے گا یعنی علوم لَدُنّیہ و آیات سماویہ کے ساتھ۔ اب بتلاویں کہ اگر یہ عاجز حق پر نہیں ہے تو پھروہ کون آیا جس نے اس چودہویں صدی کے سر پر مجدّد ہونے کا ایسا دعویٰ کیا جیسا کہ اس عاجز نے کیا کوئی الہامی دعاوی کے ساتھ تمام مخالفوں کے مقابل پر ایسا کھڑا ہوا جیسا کہ یہ عاجز کھڑا ہؤا۔ تفکروا و تندّموا واتّقوااللّٰہ ولا تغلوا اور اگر یہ عاجز مسیح موعود ہونے کے دعویٰ میں غلطی پر ہے تو پھر آپ لوگ کچھ کوشش کریں کہ مسیح موعود جو آپ کے خیال میں ہے اِنہیں دنوں میں آسمان سے اُتر آوے کیونکہ میں تو اس وقت موجود ہوں مگر جس کے انتظار میں آپ لوگ ہیں وہ موجود نہیں اور میرے دعویٰ کا ٹوٹنا صرف اسی صورت میں متصوّر ؔ ہے کہ اب وہ آسمان سے اُتر ہی آوے تا میں ملزم ٹھہر سکوں۔ آپ لوگ اگر سچ پر ہیں تو سب مل کر دعا کریں کہ مسیح ابن مریم جلد آسمان سے اُترتے دکھائی دیں اگر آپ حق پر ہیں تو یہ دُعا قبول ہوجائے گی کیونکہ اہل حق کی دُعا مُبطلین کے مقابل پر قبول ہوجایا کرتی ہے لیکن آپ یقیناًسمجھیں کہ یہ دُعا ہرگز قبول نہیں ہوگی کیونکہ آپ غلطی پر ہیں مسیح تو آچُکا لیکن آپ نے اُس کو شناخت نہیں کیا اب یہ امید موہوم آپ کی ہرگز پوری نہیں ہوگی یہ زمانہ گزر جائے گا اور کوئی ان میں سے مسیح کو اُترتے نہیں دیکھے گا۔
    حالانکہ تیرھویں صدی کے اکثر علماء چودہویں صدی میں اُس کا ظہور معین کرگئے ہیں اور بعض تو چودھویں صدی والوں کو بطور وصیّت یہ بھی کہہ گئے ہیں کہ اگر اُن کا زمانہ پاؤ تو ہمارا السلام علیکم اُنہیں کہو۔ شاہ ولی اللہ صاحب رئیس المحدّثین بھی انہیں میں سے ہیں۔
    بالآخر ہم یہ بھی ظاہر کرنا چاہتے ہیں کہ ہمیں اس سے انکار نہیں کہ ہمارے بعد کوئی اور بھی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 180
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 180
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/180/mode/1up
    مسیح کا مثیل بن کر آوے کیونکہ نبیوں کے مثیل ہمیشہ دنیا میں ہوتے رہتے ہیں بلکہ خدائے تعالیٰ نے ایک قطعی اور یقینی پیشگوئیؔ میں میرے پر ظاہر کر رکھا ہے کہ میری ہی ذُریّت سے ایک شخص پیدا ہوگا جس کو کئی باتوں میں مسیح سے مشابہت ہوگی وہ آسمان سے اُترے گا اور زمین والوں کی راہ سیدھی کردے گا اور وہ اسیروں کو رستگاری بخشے گا اور اُن کو جو شبہات کی زنجیروں میں مقید ہیں رہائی دے گا۔ فرزند دلبند گرامی و ارجمند مظہر الحق والعلاء کانّ اللّٰہ نزل من السماء لیکن یہ عاجز ایک خاص پیشگوئی کے مطابق جو خدائے تعالیٰ کی مقدس کتابوں میں پائی جاتی ہے مسیح موعود کے نام پر آیا ہے۔ واللّٰہ اعلم و علمہ احکم۔
    جائیکہ از مسیح و نزولش سخن رود
    گویم سخن اگرچہ ندارند باورم
    کاندؔ ر دلم دمید خداوند کردگار
    کاں برگزیدہ را ز رہ صدق مظہرم
    موعودم و بِحلیۂ ماثور آمدم
    حیف است گر بدیدہ نہ بینند منظرم
    رنگم چو گندم است و بمو فرق بین ست
    زِ انساں کہ آمد است در اخبار سرورم
    ایںؔ مقدمم نہ جائے شکوک ست و التباس
    سیّدؐ جدا کند ز مسیحائے احمرم
    از کلمہۂ َ منارۂ شرقی عجب مدار
    چوں خود زِ مشرق است تجلّیِ نیرّم
    اِینک منم کہ حسب بشارات آمدم
    عیسیٰ کجاست تابہ نہد پا بہ منبرم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 181
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 181
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/181/mode/1up
    آنراؔ کہ حق بجنّت خُلدش مقام داد *
    چُوں برخلاف وعدہ بروں آرد،از ارم
    چوں کافر از ستم بپرستد مسیح را
    غیّورئ خدا بَسَرش کرد، ہمسرم
    رَوْ،یک نظربجانب فرقاں زِغور کُن
    تابر تو منکشف شود ایں رازُِ مضمرم **
    یاربّؔ کجاست محرم رازِ مکاشفات
    تا نور با طنش خبر آرد ز مُخبرم
    آں قبلہ رو نمود بگیتی بچار دہم
    بعد از ہزار وسہ کہ بُت افگند درحرم
    جوشید آں چناںَ کرَمِ منبع فیوض
    کآمدندائے یار زِ ہر کوئے و معبرم
    اےؔ معترض بخوفِ الٰہی صبورباش
    تاخود خدا ،عیاںُ کند، آں نور اخترم
    آخر نخواندۂ، کہ گمانِ نکوُ کنید
    چوں میروی برون زِ حدودش برادرم
    برمن چرا کشی تو چنیں خنجر زباں
    از خود نیم زِ قادرِ ذوالمجد اکبرم
    ماموؔ رم ومراچہ دریں کار اِختیار
    رَو،ایں سخن بگوبہ خداوندِ آمرم
    اے آنکہ سوئے من بدویدی بصد تبر
    ازباغبان بِترَس کہ من شاخِ مثمرم
    حکم است زآسمان بزمیں مے ر سانمش
    گر بشنوم نگویمش آن را کجا برم
    *: دیکھو انجیل متی
    **:أ أَنت قلت للناس الخ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 182
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 182
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/182/mode/1up
    اےؔ قوم من بگفتۂ من تنگدل مباش
    زِاوّل چنیں مجوش ببیں تا بہ آخرم
    من خود نگویم ایں کہ بہ لوحِ خدا ہمیں است
    گر طاقتست محوکُن آں نقش داورم
    در تنگنائے حیرت و فکرم زِ قوم خویش
    یارب عنائتے کہ ازیں فکر مضطرم
    نےؔ چشم ماندہ است و نہ گوش و، نہ نورِ دل
    جزیک زبان شان کہ نَیرَ زَد بیکدرم
    بدگفتنم ، زِ نوع عبادت شُمُردہ اند
    در چشم شاں پلید تر از ہر مزوِرم
    اے دل تو نیز خاطر اینان نگاہ دار
    کاخر کنند دعوئے حُبِّ پیمبرمؐ
    اےؔ منکرِ پیامِ سروش و ندائے حق
    از من خطا مَبِیں کہ خطا در تو بِنگرم
    جانمُ گدَاخت از غمِ ایمانت اے عزیز
    و این طرفہ تر کہ من بگمانِ تو کافرم
    خواہی کہ روشنت شود احوال صدق ما
    روشن دلی بخواہ ازاں ذاتِ ذُوالکرم
    گوشِؔ دِلَم بجانب تکفیر کسُ کجاست
    من مست جامہائے عنایاتِ دلبرم
    از طعن دشمناں خبرے چوں شود مرا
    کاندر خیال دوست بخوابِ خوش اندرم
    من میزیم بَوَحْیِ خدائے کہ بامن است
    پیغامِ اوست چوں نفسِ رُوح پرورم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 183
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 183
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/183/mode/1up
    منؔ رخت بُرد ہ ام بعماراتِ یارِ خویش
    دیگر خبر مپرس ازیں تیرہ کشورم
    عشقش بتاروپُود دل من دروں شداست
    مہرش شد است در رہِ دین مہرِ انورم
    رازِ محبتِ من و اُو فاش گر شدے
    بسیار تن کہ جاں بفشاندی بریں درم
    ابناؔ ئے روزگار ندانند راز من
    من نور خود نہفتہ زِ چشمان شپرم
    بعد از رَہم ہر آنچہ پسندند ہیچ نیست
    بد قسمت آنکہ در نظرش ہیچ محترم
    ہر لحظہ میخوریم زِجامِ وصالِ دوست
    ہر دم انیس یار علیٰ رغم منکرم
    بادِؔ بہشت بردلِ پُر سوز من وَزَد
    صد نگہتِ لطیف دہد دُود مجمرم
    بدبوئے حاسداں نرساند زِیاں بمن
    من ہر زماں زِ نافۂ یادش مُعطّرم
    کارم زِ قرب یار بجائے رسیدہ است
    کانجا ز فہم و دانش اغیارِ برترم
    پائمؔ زِ لُطف یار بجنّت خزیدہ است
    و ا زِ فضل آں حبیب بدستست ساغرم
    جوشِ اجابتش کہ بوقتِ دعا بود
    زاںُ گونہ زاریم نشنید است مادرم
    ہر سوئے و ہر طرف رُخِ آں یار بنگرم
    آں دیگرے کجاست کہ آید بخاطرم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 184
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 184
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/184/mode/1up
    اےؔ حسرت ایں گروہ عزیزان مرا ندید
    وقتے بہ بیندم کہ ازیں خاک بگذرم
    گر خون شداست دل زِغم و درد شاں چہ شد
    ہست آرزو کہ سَر برود ہم درِیں سَرَم
    ہر شب ہزارغم بمن آید زِ درد قوم
    یاربّ نجات بخش ازیں روز پُر شرم
    یاربّؔ بآب چشم من ایں کسل شان بشو
    کاِمرُوز تر شد است ازیں درد بسترم
    در یاب چونکہ آب زِ بہرِ تو ریختیم
    دریاب چونکہ جز تو نماند است دیگرم
    تاریکئ غموم بآخر نمی رسد
    ایں شب مگر تمام شود روز محشرم
    دلؔ خوں شداست ازغمِ ایں قوم نا شناس
    و از عالمانِ کج کہ گرفتند چنبرم
    گر علم خشک و کورئ باطن نہ رَہ زدے
    ہر عالم و فقیہ شدے ہمچو چاکرم
    برسنگ میکند اثر ایں منطقم مگر
    بے بہرہ ایں کساں زِ کلام مؤثرم
    علمؔ آں بود کہ نور فراست رفیق اوست
    ایں علم تیرہ را بہ پشیزے نمیخرم
    امروز قوم من نشناسد مقامِ من
    روزے بگریہ یاد کند وقتِ خوشترم
    اے قومِ من بصبرنظر سوئے غیب دار
    تادست خود بعجز، زِ بہر توُ گسترم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 185
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 185
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/185/mode/1up
    گرؔ ہمچو خاک پیش تو قدرم بود،چہ باک
    چوں خاک نے کہ از خس و خاشاک کمترم
    لطف است و فضل او کہ نوازد و گرنہ من
    کِرمم نہ آدمی صدف استم نہ گوہرم
    زانگونہ دست او دلم از غیر خود کشید
    گوئی کہے نہ بود دِگر در تصوّرم
    بعدؔ از خدا بعشقِ محمّدؐ مخمّرم
    گر کفر اِیں بود بخدا سخت کافرم
    ہر تارو پُودِ من بسرائد بعشق اُو
    از خود تہی و از غمِ آں دِلستاں پُرم
    من در حریم قُدس چراغِ صداقتم
    دستش محافظ است زِ ہر بادَِ صرَصرم
    ہر ؔ دم فلک شہادت صدقم ہمی دہد
    زینم کدام غم کہ زمیں گشت منکرم
    واللہ کہ ہمچو کشتئ نوحم زِکردگار
    بے دولت آنکہ دُور بماند ز لنگرم
    ایں آتشے کہ دامنِ آخر زمان بسوخت
    از بہرِ چارہ اش بخدا نہرِ کوثرم
    منؔ نیستم رسول و نیاوردہ ام کتاب
    ہاں مُلہم استم و زِ خداوند مُنذرم
    یاربّ بزاریم نظرے کن بلطف و فضل
    جُز دست رحمتِ تو دگر کیست یاورم
    جانم فدا شود برہِ دینِ مصطفٰے
    این است کام دل اگر آیدُ میَسَّرم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 186
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 186
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/186/mode/1up
    قریبؔ تر بامن و نزدیک تر بسعادت کون لوگ ہیں کیا وہ لوگ
    جنہوں نے اس عاجز کا مسیح موعود ہونا مان لیا یا وہ لوگ جو منکر ہو گئے
    واضح ہو کہ یہ بات نہایت صاف اور روشن ہے کہ جنہوں نے اس عاجز کا مسیح موعود ہونا ما ن لیا ہے وہ لوگ ہریک خطرہ کی حالت سے محفوظ اور معصوم ہیں اور کئی طرح کے ثواب اور اجر اور قوت ایمانی کے وہ مستحق ٹھہر گئے ہیں۔
    اوّل یہ کہ انہوں نے اپنے بھائی پر حسن ظن کیا ہے اور اس کو مفتری یا کذاب نہیں ٹھہرایا اور اس کی نسبت کسی طرح کے شکوک فاسدؔ ہ کو دل میں جگہ نہیں دی اس وجہ سے اس ثواب کا انہیں استحقاق حاصل ہوا کہ جو بھائی پر نیک ظن رکھنے کی حالت میں ملتا ہے۔
    دوسر ی یہ کہ وہ حق کے قبول کرنے کے وقت کسی ملامت کنندہ کی ملامت سے نہیں ڈرے اور نہ نفسانی جذبات اُن پر غالب ہو سکے اس وجہ سے وہ ثواب کے مستحق ٹھہرگئے کہ انہوں نے دعوت حق کو پا کر اور ایک ربّانی مناد کی آواز سُن کر پیغام کو قبول کر لیا اور کسی طرح کی روک سے رُک نہیں سکے۔
    تیسری یہ کہ پیشگوئی کے مصداق پر ایمان لانے کی وجہ سے وہ اُن تمام وساوس سےَ مخلصی پاگئے کہ جو انتظار کرتے کرتے ایک دن پیداہو جاتے ہیں اور آخریاس کی حالت میں ایمان دُور ہو جانے کا موجب ٹھہرتے ہیں اور اُن سعید لوگوں نے نہ صرف خطرات مذکورہ بالا سے مخلصی پائی بلکہ خدائے تعالیٰ کا ایک نشان اور اس کے نبی کی پیشگوئی اپنی زندگی میں پوری
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 187
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 187
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/187/mode/1up
    ہوتی دیکھ کر ایمانی قوت میں بہت ترقی کر گئے اور اُن کے سماعی ایمان پر ایک معرفت کا رنگ آگیا اب وہ اُن تمام حیرتوں سے چھوٹ گئے جو اُن پیشگوئیوں کے بارہ میں دلوں میں پیدا ہوا کرتی ہیں جو پورؔ ی ہو نے میں نہیں آتیں۔
    چوتھی یہ کہ وہ خدائے تعالیٰ کے بھیجے ہوئے بندہ پر ایمان لا کر اس سخط اور غضب الٰہی سے بچ گئے جو اُن نافرمانوں پر ہوتاہے کہ جن کے حصہ میں بجُز تکذیب و انکارکے اور کچھ نہیں۔
    پانچویں یہ کہ وہ اُن فیوض اور برکات کے مستحق ٹھہر گئے جو اُن مخلص لوگوں پر نازل ہوتے ہیں جو حسن ظن سے اُس شخص کو قبول کر لیتے ہیں کہ جو خدائے تعالیٰ کی طرف سے آتا ہے۔
    یہ تو وہ فوائد ہیں کہ جو انشاء اللہ الکریم اُن سعید لوگوں کو بفضلہ تعالیٰ ملیں گے جنہوں نے اس عاجز کو قبول کر لیا ہے لیکن جو لوگ قبول نہیں کرتے وہ ان تما م سعادتوں سے محروم ہیں اور اُن کا یہ وہم بھی لغو ہے کہ قبول کرنے کی حالت میں نقصان دین کا اندیشہ ہے۔میں نہیں سمجھ سکتا کہ وہ نقصانِ دین کس وجہ سے ہو سکتا ہے۔نقصان تو اس صورت میں ہوتا کہ اگر یہ عاجز برخلاف تعلیم اسلام کے کسی اَور نئی تعلیم پر چلنے کے لئے انہیں مجبور کرتا۔مثلًا کسی حلال چیز کو حرام یا حرام کوحلا ل بتلاتا یا اُن ایمانی عقائد میں جو نجات کے لئے ضروری ہیں کچھ فرق ڈالتا یا یہ کہ صوم و صلٰوۃ و حجؔ و زکٰوۃ وغیرہ اعمال شرعیہ میں کچھ بڑھاتا یا گھٹا دیتا مثلاً پانچ وقت کی نماز کی جگہ دس وقت کی نماز کر دیتا یا دووقت ہی رہنے دیتا یا ایک مہینہ کی جگہ دو مہینے کے روزے فرض کر دیتا یا اس سے کم کی طرف توجہ دلاتا تو بے شک سراسر نقصان بلکہ کفر و خسران تھا لیکن جس حالت میں یہ عاجز بار بار یہی کہتا ہے کہ اے بھائیو! میں کوئی نیا دین یا نئی تعلیم لے کر نہیں آیا بلکہ میں بھی تم میں سے اورتمہاری طرح ایک مسلمان ہوں اور ہم مسلمانوں کے لئے بجز قرآن شریف اور کوئی دوسری کتاب نہیں جس پر عمل کریں یا عمل کرنے کے لئے دوسروں کو ہدایت دیں اور بجُز
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 188
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 188
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/188/mode/1up
    جناب ختم المرسلین احمد عربی صلعم کے اور کوئی ہمارے لئے ہاد ی اور مقتدا نہیں جس کی پیروی ہم کریں یا دوسروں سے کرانا چاہیں توپھر ایک مُتدیّنمسلمان کے لئے میرے اس دعوے پر ایمان لانا جس کی الہام الٰہی پر بناہے کونسی اندیشہ کی جگہ ہے۔ بفرضِ محال اگر میر ایہ کشف اور الہام غلط ہے اور جو کچھ مجھے حکم ہو رہا ہے اُس کے سمجھنے میں مَیں نے دھوکہ کھایا ہے تو ماننے والے کا اس میں حرج ہی کیا ہے۔کیا اُس نے کوئی ایسی بات مان لی ہے جس کی وجہ سے اُس کے دین میں کوئی رخنہ پیدا ہو سکتا ہے اگر ہماری زندؔ گی میں سچ مچ حضرت مسیح ابن مریم ہی آسمان سے اُتر آئے تو دلِ ما شا دو چشمِ ماروشن ہم اور ہمارا گروہ سب سے پہلے اُن کو قبول کرلے گا اور اس پہلی بات کے قبول کرنے کا بھی ثواب پائے گا جس کی طرف محض نیک نیتی اورخدائے تعالیٰ کے خوف سے اُس نے قدم اُٹھایا تھا بہرحال اس غلطی کی صورت میں بھی (اگر فرض کی جائے)ہمارے ثواب کا قدم آگے ہی رہا اور ہمیں دو ثواب ملے اور ہمارے مخالف کو صرف ایک لیکن اگر ہم سچے ہیں اور ہمارے مخالف آئندہ کی امیدیں باندھنے میں غلطی پر ہیں تو ہمارے مخالفوں کا ایمان سخت خطرہ کی حالت میں ہے کیونکہ اگر سچ مچ انہوں نے اپنی زندگی میں حضرت مسیح ابن مریم کو بڑے اقبال و جلال کے ساتھ آسمان سے اُترتے دیکھ لیا اور اپنی آنکھوں سے مشاہدہ کر لیا کہ فرشتوں کے ساتھ اُترتے چلے آتے ہیں تب تو اُن کا ایمان سلامت رہا ورنہ دوسری صورت میں ایمان سلامت رہنے کی کوئی صورت نظر نہیں آتی۔کیونکہ اگر اخیر زندگی تک کوئی آدمی آسمان سے اُترتا اُنہیں دکھائی نہ دیا بلکہ اپنی ہی طیاری آسمان کی طرف جانے کے لئے ٹھہر گئی تو ظاہر ہے کہ کیا کیا شکوک و شبہات ساتھؔ لے جائیں گے اور نبی صادق کی پیشگوئی کے بارہ میں کیا کیا وساوس دل میں پڑیں گے اورقریب ہے کہ کوئی ایساسخت وسوسہ پڑجائے کہ جس کے ساتھ ایمان ہی برباد ہو۔ کیونکہ یہ وقت انجیل اور احادیث کے اشارات کے مطابق وہی وقت ہے جس میں مسیح اُترنا چاہیئے اسی وجہ سے سلف صالح میں سے بہت سے صاحبِ مکاشفات مسیح کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 189
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 189
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/189/mode/1up
    آنے کا وقت چودہویں صدی کا شروع سال بتلا گئے ہیں چنانچہ شاہ ولی اللہ صاحب مُحدّث دہلوی قدس سرہٗ کی بھی یہی رائے ہے اور مولوی صدیق حسن صاحب مرحوم نے بھی اپنے ایک رسالہ میں ایساہی لکھا ہے اور اکثر محدّثین اس حدیث کے معنے میں کہ جو الاٰیات بعد المأ تین ہے اسی طرف گئے ہیں۔اگر یہ کہو کہ مسیح موعود کا آسمان سے دمشق کے منارہ کے پاس اُترنا تمام مسلمانوں کا اجماعی عقیدہ ہے تو اس کا جواب َ میں اسی رسالہ میں لکھ چکا ہوں کہ اس بات پر ہرگز اجماع نہیں قرآن شریف میں اس کا کہاں بیان ہے وہاں تو صرف موت کا ذکر ہے بخاری میں حضرت یحیٰیکی روح کے ساتھ حضرت عیسٰی کی روح کو دوسرے آسمان پر بیان کیا ہے اور دمشق میں اُترنے سے اعراض کیاہے اور ابن ماجہ صاحب بیتؔ المقدس میں اُ ن کو نازل کررہے ہیں اور ان سب میں سے کسی نے یہ دعویٰ نہیں کیا کہ یہ تمام الفاظ و اسماء ظاہر پر ہی محمول ہیں بلکہ صرف صورت پیشگوئی پر ایمان لے آئے ہیں پھر اجماع کس بات پر ہے۔ہاں تیرہویں صدی کے اختتام پر مسیح موعود کا آنا ایک اجماعی عقیدہ معلوم ہوتا ہے۔سو اگر یہ عاجز مسیح موعود نہیں تو پھر آپ لوگ مسیح موعود کو آسمان سے اُتار کر دکھلادیں۔صالحین کی اولاد ہو مسجد میں بیٹھ کر تضرّع اور زاری کرو تاکہ عیسٰی ابن مریم آسمان سے فرشتوں کے کاندھوں پر ہاتھ رکھے ہوئے تشریف لاویں اور تم سچے ہو جاؤ۔ ورنہ کیوں ناحق بد ظنی کرتے ہو اور زیر الزام آیت کریمہ لَا تَقْفُ مَا لَـيْسَ لَـكَ بِهٖ عِلْمٌ ۱؂ آتے ہو خدائے تعالیٰ سے ڈرو۔
    لطیفہ چند روز کا ذکر ہے کہ اس عاجز نے اس طرف توجہ کی کہ کیا اس حدیث کا جو الاٰیات بعد المأتین ہے ایک یہ بھی منشاء ہے کہ تیرہویں صدی کے اواخر میں مسیح موعود کا ظہور ہو گا اور کیا اس حدیث کے مفہوم میں بھی یہ عاجز داخل ہے تو مجھے کشفی طور پر اس مندرجہ ذیل نام کے اعدادحروف کی طرف توجہ دلائی گئی کہ دیکھ یہی مسیح ہے کہ جو تیرہویں صدی کے ؔ پورے ہونے پر ظاہر ہونے والاتھا پہلے سے یہی تاریخ
    ۱؂ بنی اسرائیل:۳۷
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 190
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 190
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/190/mode/1up
    ہم نے نام میں مقرر کر رکھی تھی اور وہ یہ نام ہے غلام احمد قادیانی اس نام کے عدد پورے تیرہ ۱۳۰۰ سو ہیں اور اس قصبہ قادیان میں بجز اس عاجز کے اور کسی شخص کا غلام احمد نا م نہیں بلکہ میرے دل میں ڈالا گیا ہے کہ اِسوقت بجز اس عاجز کے تمام دنیا میں غلام احمد قادیانی کسی کا بھی نام نہیں اور اس عاجز کے ساتھ اکثر یہ عادت اللہ جاری ہے کہ وہ سبحانہ بعض اسرار اعداد حروف تہجّی میں میرے پرظاہر کردیتا ہے۔ایک دفعہ میں نے آدم کے سن پیدائش کی طرف توجہ کی تو مجھے اشارہ کیا گیا کہ ان اعداد پر نظر ڈالو جو سورۃ العصر کے حروف میں ہیں کہ انہیں میں سے وہ تاریخ نکلتی ہے۔
    ایک مرتبہ میں نے اس مسجد کی تاریخ جس کے ساتھ میرا مکان ملحق ہے الہامی طور پر معلوم کرنی چاہی تو مجھے الہام ہوا مبارک و مبارِک وکل امر مبارک یجعل فیہ۔یہ وہی مسجد ہے جس کی نسبت میں اسی رسالہ میں لکھ چکا ہوں کہ میرا مکان اس قصبہ کے شرقی طرف آبادی کے آخری کنارہ پرواقع ہے اسی مسجدکے قریب اور اس کے شرقی منارہ کے نیچے جیساکہ ہمارے سیّد و مولیٰ کی پیشگوئی کا مفہوم ہے صلی اللہ علیہ وسلم ۔
    اور ابھی چند روز کا ذکر ہے کہ ایک شخص کی موت کی نسبت خدائے تعالیٰ نےؔ اعداد تہجی میں مجھے خبر دی جس کا ماحصل یہ ہے کہ کلب یموت علٰی کلب یعنی وہ کُتّا ہے اور کُتے کے عدد پر مرے گا جو باو۵۲ ن سال پر دلالت کررہے ہیں یعنی اُس کی عمر باو ۵۲ن سال سے تجاوز نہیں کرے گی جب باون سال کے اندر قدم دھرے گا تب اُسی سال کے اندر اندر راہی ملک بقا ہو گا۔
    اب پھر میں تقریر بالا کی طرف رجوع کر کے کہتا ہوں کہ ہمار اگروہ ایک سعید گروہ ہے جس نے اپنے وقت پر اس بندہ مامور کو قبول کر لیا ہے جو آسمان اور زمین کے خدا نے بھیجا ہے اور ان کے دلوں نے قبول کرنے میں کچھ تنگی نہیں کی کیونکہ وہ سعید تھے اور خدائے تعالیٰ نے اپنے لئے انہیں چُن لیا تھا۔عنایت حق نے انہیں قوت دی اور دوسروں کو نہیں دی اور اُن کا سینہ کھول دیا اور دوسروں کا نہیں کھولا سو جنہوں نے لے لیا اُنہیں اَور بھی دیا جائے گا اور ان کی بڑھتی ہوگی مگر جنہوں نے نہیں لیا اُن سے وہ بھی لیا جائے گا جو اُن کے پاس پہلے تھا۔بہت سے راستبازوں نے آرزو کی کہ اس زمانہ کو دیکھیں مگر دیکھ نہ سکے مگر افسوس کہ ان لوگوں نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 191
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 191
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/191/mode/1up
    دیکھا مگر قبول نہ کیا ان کی حالت کو میں کس قوم کی حالت سے تشبیہ دوں اُنکی نسبت یہی تمثیل ٹھیک آتی ہے کہ ایک بادشاہ نےؔ اپنے وعدہ کے موافق ایک شہر میں اپنی طرف سے ایک حاکم مقرر کرکے بھیجا تا وہ دیکھے کہ درحقیقت مطیع کون ہے اور نافرمان کون اور تا اُن تمام جھگڑوں کا تصفیہ بھی ہو جائے جو اُن میں واقع ہو رہے ہیں چنانچہ وہ حاکم عین اُس وقت میں جبکہ اس کے آنے کی ضرورت تھی آیا اور اُس نے اپنے آقائے نامدارکا پیغام پہنچادیا اور سب لوگوں کو راہِ راست کی طرف بُلایا اور اپنا حَکَم ہونا اُن پر ظاہر کردیا۔لیکن وہ اس کے ملازم سرکاری ہونے کی نسبت شک میں پڑ گئے تب اُس نے ایسے نشان دکھلائے جو ملازمو ں سے ہی خاص ہوتے ہیں مگر انہوں نے نہ مانا اور اُسے قبول نہ کیا اور اُس کو کراہت کی نظرسے دیکھا اور اپنے تئیں بڑاسمجھااور اس کا حَکم ہونا اپنے لئے قبول نہ کیا بلکہ اس کو پکڑ کر بے عزّت کیا اور اُس کے مُنہ پر تھوکا اور اس کے مارنے کے لئے دوڑے اور بہت سی تحقیر و تذلیل کی اور بہت سی سخت زبانی کے ساتھ اُس کو جھٹلایا تب وہ اُن کے ہاتھ سے وہ تمام آزاراُٹھاکر جو اس کے حق میں مقدّر تھے اپنے بادشاہ کی طرف واپس چلاگیا اور وہ لوگ جنہوں نے اُس کا ایسابُرا حال کیا کسی اور حاکم کے آنے کے منتظر بیٹھے رہے اور جہالت کی راہ سے ایسے خیال باطلؔ پر جمے رہے کہ یہ تو حاکم نہیں تھا بلکہ وہ اور شخص ہے جو آئے گا جس کی انتظاری ہمیں کرنی چاہیئے سو وہ سارا دن اس شخص کی انتظارکئے گئے اور اُٹھ اُٹھ کر دیکھتے رہے کہ کب آتا ہے اور اس وعدہ کا باہم ذکرکرتے رہے جو بادشاہ کی طرف سے تھا یہاں تک کہ انتظار کرتے کرتے سورج غروب ہونے لگااور کوئی نہ آیا آخر شام کے قریب بہت سے پولیس کے سپاہی آئے جن کے ساتھ بہت سی ہتکڑیاں بھی تھیں سوانہوں نے آتے ہی اُن شریروں کے شہر کو پھونک دیااور پھر سب کو پکڑ کر ایک ایک کو ہتکڑی لگا دی اورعدالت شاہی کی طرف بجُرم عدول حکمی اور مقابلہ ملازم سرکاری چالان کردیا جہاں سے انہیں وہ سزائیں مل گئیں جن کے وہ سزاوار تھے۔
    سو میں سچ مچ کہتا ہوں کہ یہی حال اس زمانہ کے جفاکار منکروں کا ہوگا ہریک شخص اپنی زبان اور قلم اور ہاتھ کی شامت سے پکڑاجائے گا جس کے کان سُننے کے ہوں سُنے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 192
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 192
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/192/mode/1up
    علماؔ ئے ہند کی خدمت میں نیاز نامہ
    اے برادران دین وعلمائے شرع متین!آپ صاحبان میری ان معروضات کو متوجہ ہو کر سُنیں کہ اس عاجزنے جو مثیل موعود ہونے کا دعویٰ کیا ہے جس کو کم فہم لوگ مسیح موعود خیال کر بیٹھے ہیں۔یہ کوئی نیا دعویٰ نہیں جو آج ہی میرے مُنہ سے سُنا گیا ہو بلکہ یہ وہی پُرانا الہام ہے جو میں نے خدائے تعالیٰ سے پاکر براھین احمدیہ کے کئی مقامات پر بتصریح درج کر دیا تھا جس کے شائع کرنے پر سات سال سے بھی کچھ زیادہ عرصہ گزر گیا ہوگا میں نے یہ دعویٰ ہرگزنہیں کیا کہ میں مسیح بن مریم ہوں جو شخص یہ الزام میرے پر لگاوے وہ سراسر مفتری اور کذاّب ہے بلکہ میری طرف سے عرصہ سات یا آٹھ سال سے برابر یہی شائع ہو رہا ہے کہ میں مثیل مسیح ہوں یعنی حضرت عیسٰی علیہ السلام کے بعض روحانی خواص طبع اور عادت اور اخلاق وغیرہ کے خدائے تعالیٰ نے میری فطرت میں بھی رکھے ہیں اور دوسرے کئی امور میںؔ جن کی تصریح انہیں رسالوں میں کر چکا ہوں میر ی زندگی کو مسیح ابن مریم سے اشد مشابہت ہے اور یہ بھی میری طرف سے کوئی نئی بات ظہور میں نہیںآئی کہ میں نے ان رسالوں میں اپنے تئیں وہ موعود ٹھہرایا ہے جس کے آنے کا قرآن شریف میں اجمالًا اور احادیث میں تصریحاً بیان کیا گیاہے کیونکہ میں تو پہلے بھی براہین احمدیہ میں بتصریح لکھ چکا ہوں کہ میں وہی مثیل موعود ہوں جس کے آنے کی خبر روحانی طور پر قرآن شریف اور احادیث نبویہ میں پہلے سے وارد ہو چکی ہے۔ تعجب کہ مولوی ابو سعید محمد حسین صاحب بٹالوی اپنے رسالہ اِشَاعۃ السُّنّۃ نمبر ۶ جلد سا ت میں جس میں براہین احمدیہ کا ریویو لکھا ہے اِن تمام الہامات کی اگرچہ ایمانی طور پر نہیں مگر امکانی طور پر تصدیق کر چکے اور بدل و جان مان چکے ہیں مگر پھر بھی سُنا جاتا ہے کہ حضرت مولوی صاحب موصوف کو بھی اور لوگوں کا شور اور غوغا دیکھ کر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 193
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 193
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/193/mode/1up
    کچھ منکرانہ جوش دل میں اُٹھتا ہے و ہذا اعجب العجائب اور الہامات جو اس بار ہ میں براہین میں درج ہیں وہ صفحات نمبر ۲۳۸،۲۳۹،۲۴۰،۴۴۷،۴۹۸ ، ۵۰۵ ،۵۱۰ ، ۵۱۱ ، ۵۱۳ ، ۵۱۴ ،۵۵۶ ، ۵۵۹ ، ۵۶۰ ،۵۶۱ میں مندرج ہیں جن کی عبارتیں یہؔ ہیں۔
    یا احمد بارک اللہ فیک مارمیت اذرمیت ولٰکن اللّٰہ رمٰی ا لرحمٰن علم القراٰن لتنذر قوما ما انذر اٰباؤھم و لتستبین سبیل المجرمین قل انّی امرت وانا اوّل المؤمنین یاعیسٰی انّی متوفیک ورافعک الیّ وجاعل الذین اتبعوک فوق الذین کفرواالٰی یوم القیٰمۃ ھو الذی ارسل رسولہ بالھُدٰی و دین الحق لیظھرہ علی الدّین کلّہ لا مبدل لکلمات اللّٰہ اناانزلناہ قریبًا من القادیان وؔ بالحق انزلناہ وبالحق نزل صدق اللّٰہ ورسولہ وکان امراللّٰہ مفعولا وقالواان ھو الا افک نافترٰی وما سمعنا بھذا فی اٰبائنا الاوّلین قل ھو اللّٰہ عجیب یجتبٰی من یشآء من عبادہ۔ لا یسئل عما یفعل و ھم یسئلون
    اے احمد خدائے تعالیٰ نے تجھ میں برکت ڈال دی ہے جو کچھ تو نے چلایا جبکہ چلایا یہ تُو نے نہیں بلکہ خدانے چلایا ہے وہی رحمٰن ہے جس نے قرآن تجھے سکھایا تا تو ان لوگوں کو ڈراوے جن کے باپ دادے ڈرائے نہیں گئے اور تا مجرموں کی راہ صاف طور پرکھل جاوے یعنی تا معلوم ہو جاوے کہ کون لوگ تیرا ساتھ اختیار کرتے ہیں اور کو ن لو گ بغیر بصیر ت کامل کے مخالفت پر کھڑے ہو جاتے ہیں اور سب لوگوں کو کہہ دے کہ میں خدائے تعالیٰ کی طرف سے حَکم کیاگیا ہوں اور سب سے پہلا وہ آدمی ہوں جو اس حکم پر ایمان لایا۔اے عیسیٰ میں تجھے وفات دوں گااور اپنی طرف اُٹھاؤں گااور و ہ جو تیرے تابع ہوئے ہیں میں انہیں اُن دوسرے لوگوں پر جو تیرے منکر ہیں قیامت کے دن تک غالب رکھوں گا۔خدا وہ قادر ہے جس نے اپنے رسول کو ہدایت اور سچائی دین دے کر بھیجا تا سب دینوں پر حجت کی رُو سے اُس کو غالب کرے۔(یہ وہ پیشگوئی ہے جو پہلے سے قرآن شریف میں انہیں دنوں کے لئے لکھی گئی ہے ) پھر بعد اس کے الہام الٰہی کا یہ ترجمہ ہے کہ خدائے تعالیٰ کے ان وعدوں کو جو پہلے سے اس کی پاک کلام میں آچکے ہیں کوئی بدل نہیں سکتا یعنی وہ ہرگز ٹل نہیں سکتے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 194
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 194
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/194/mode/1up
    سنلقی فی قلوبھم الرعب قل جآء کم نور من اللّٰہ۔فلاؔ تکفروا ان کنتم مؤمنین والذین اٰمنوا ولم یلبسواایمانھم بظلم اولٰئک لھم الامن وھم مھتدون ویخوفونک من دونہٖ ائمۃ الکفر تبت یداابی لھب وتب ما کان لہ ان یدخل فیھا الا خائفا وما اصابک فمن اللّٰہ الفتنۃ ھٰھنا فاصبر کما صبر اولوؔ العزم الا انھا فتنۃ من اللّٰہ۔لیحب حبا جما حبا من اللّٰہ العزیز الاکرم فی اللّٰہ اجرک ویرضٰی عنک ربک ویتم اسمک وان لم یعصمک الناس فیعصمک اللّٰہ من عندہ
    اور پھر بعد اس کے فرمایا ہے کہ ہم نے اس مامور کو مع اپنے نشانوں اور عجائبات کے قادیان کے قریب اُتارا ہے اور سچائی کے ساتھ اُتارا اور سچائی کے ساتھ اُترا۔اللہ اور اس کے رسول کے وعدے جو قرآن اور حدیث میں تھے آج سچے ہو گئے اور خدا تعالیٰ کاوعدہ اور امر ایک دن پورا ہونا ہی تھا اور کہیں گے کہ یہ سراسر جھوٹ ہے جو آپ بنا لیا اور ہم نے اپنے سلف صالح سے اس کو نہیں سُنا۔ان کو کہہ کہ خدا تعالیٰ کی شان عجیب ہے تم اس کے اسرار تک پہنچ نہیں سکتے جس کو چاہتا ہے اپنے بندوں میں سے چن لیتا ہے اس کے پاس اپنے بندوں کی کچھ کمی نہیں اور اس کے کاموں کی اس سے کوئی باز پرس نہیں کر سکتاکہ ایسا کیوں کیا اور ایساکیوں نہیں کیا اور وہ اپنے بندوں کے افعال و اقوال کی باز پُرس کرتا ہے اور عنقریب ہم ان کے دلوں پر رُعب ڈال دیں گے ان کو کہہ دے کہ یہ نوراللہ تعالیٰ کی طرف سے آیا ہے اگر تم مومن ہو تو اس سے انکار مت کرو اور وہ لوگ جو ایمان لائے اور اپنے ایمان میں کسی ظلم کو نہیں ملایا وہ امن کی حالت میں ہیں اور وہی ہدایت یافتہ ہیں اور منکروں کے پیشوا تجھے ڈرائیں گے ہلاک ہوئے دونوں ہاتھ ابی لہب کے اور آپ بھی ہلاک ہوا اسے نہیں چاہیئے تھا کہ اس معاملہ میں دلیری سے اپنے تئیں داخل کرتا بلکہ ڈرتا اور جو کچھ تجھے لوگوں کی باتوں سے آزار پہنچے گا وہ درحقیقت خدا تعالیٰ کی طرف سے ہو گا۔اس جگہ ابی لہب سے مراد ایسے لوگ ہیں کہ جو مخالفانہ تحریروں کے لئے بغیر بصیرت کاملہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 195
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 195
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/195/mode/1up
    وماکان اللّٰہ لیترکک حتی یمیز الخبیث من الطیب وعسیٰ ان تکرھوا شیئا وھو خیر لکم و اللّٰہ یعلم وانتم لا تعلمون ربّؔ اغفر وار حم من السمآء رب انی مغلوب فانتصر ایلی ایلی لما سبقتنی۔ رب ارنی کیف تحی الموتٰی رب لا تذرنی فردًا وانت خیرا لوارثین ربناافتح بیننا وبین قومنا بالحق وانت خیر الفاتحین بشری لک یا احمدی انت مرادی ومعی غرستُ کرامتک بیدی انت وجیہ فی حضرتی
    کے کھڑے ہو جائیں گے اورلَا تَقْفُ مَا لَـيْسَ لَـكَ بِهٖ عِلْمٌ ۱؂ کی نہی سے نہیں ڈریں گے اور امر حُسن ظن کی پروا نہیں رکھیں گے اور متشابہات امر متنازعہ فیہ کو حوالہ بخدا نہیں کریں گے۔پھر فرمایا کہ جب لوگ مخالفت پر آمادہ ہو جائیں گے تو یہ ایک آزمائش کی جگہ ہو گی پس اس وقت تُو صبر کر جیساکہ اولوالعزم رسول صبر کرتے رہے ہیں یاد رکھ کہ یہ منجانب اللہ آزمائش ہے تا وہ کامل طور پر تجھ سے محبت کرے یہ وہ محبت ہے جو خداوند غالب اور بہت بزرگ کی طرف سے ہے تیرا اجر خدادے گا اور تیرا رب تجھ سے راضی ہو گا اور تیرا نام پوراکرے گا اور خداتجھے بچائے گااگرچہ لوگ تیرے بچانے سے دریغ ہی کریں اور خداایسا نہیں ہے کہ قبل اس کے جو خبیث اور طیّب میں فرق کر کے دکھلا وے تجھے چھوڑ دیوے اور ایسا ہو سکتا ہے کہ تم ایک امر کو جو تم پر وارد ہو مکروہ سمجھو اور تمہارے د ل کو اچھا نہ لگے مگر دراصل وہ تمہارے لئے اچھا ہو اور خدا تعالیٰ حقیقت اسرار جانتا ہے اور تم نہیں جانتے۔ اے میرے رب میرے گناہ بخش اور آسمان سے مجھ پر رحم نازل کر اور میرے لئے کھڑا ہو کہ میں مغلوب ہوں۔اے میرے خدا اے میرے خدا تو نے مجھے کیوں چھوڑ دیا (یہ اشارہ اس مشابہت کی طرف ہے کہ جو اس عاجز کو حضرت مسیح سے ہے کیونکہ ایلی ایلی کی دعا درحقیقت مسیح نے اپنی تنگی کے وقت کی تھی )اور پھر اس عاجز کی طرف سے خدا تعالیٰ نے الہامی طور پر یہ دعا ظاہر کی کہ مجھے دکھلا کہ تو کیونکر مردوں کو زندہ کرتا ہے (یہ بھی مسیحی مشا بہت کی طرف اشارہ ہے ) اور پھراس عاجز کی طرف سے الہامی طورپریہ دعا ظاہر کی کہ مجھے اکیلا مت چھوڑ اور تو خیرالوارثین ہے۔ مجھ میں اور میری قوم میں سچا فیصلہ کر تو خیر الفاتحین ہے۔اے میرے احمدتجھے بشارت ہو
    ۱؂ بنی اسرائیل:۳۷
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 196
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 196
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/196/mode/1up
    اخترتک لنفسی شأنک عجیب واجرؔ ک قریب الارض والسمآء معک کما ھو معی جری اللہ فی حلل الانبیآء لا تخف انک انت الاعلٰی ینصرک اللہ فی مواطن ان یومی لفصل عظیم کتب اللہ لاغلبن انا ورسلی الاان حزب اللّٰہ ھم الغالبون۔
    تُو میری مراد اور میرے ساتھ ہے میں نے تیری کرامت کادرخت ثابت اور مستحکم کردیا تُو میر ی درگاہ میں وجیہ ہے میں نے تجھے اپنے لئے چنا تیری شان عجیب اور تیرا اجر قریب ہے۔تیرے ساتھ زمین و آسمان ایسا ہے جیساکہ وہ میرے ساتھ ہے۔تُو خدا کا پہلوان ہے نبیوں کے حُلّوں میں۔ مت خوف کر کہ غلبہ تجھ کو ہے۔ خداکئی میدانوں میں تیری مدد کرے گا۔میرا دن بڑے فیصلہ کا دن ہے۔ میں نے لکھ چھوڑا ہے کہ ہمیشہ مَیں اور میرے رسول ہی غالب رہیں گے۔یاد رکھ کہ خدا کا ہی گروہ غالب رہا کرتا ہے۔
    یہ وہ الہامات ہیں جو براہین احمدیہ میں صفحات مذکورہ بالا میں ہم لکھ چکے ہیں۔جو صراحتًا وکنایتًا اس عاجز کے مثیل موعود ہونے پردلالت کررہے ہیں۔
    ہاں براہین میں اس بات کا الہامی طور پر کچھ فیصلہ نہیں کیا گیا کہ حضرت مسیح بن مریم کے نزول کے جو لوگ منتظر ہیں کہ وہی سچ مچ بہشت سے نکل کر فرشتوں کے کندھوں پر ہاتھ رکھے ہوئے آسمان سے زمین پر اُتر آئیں گے اس کی اصل حقیقت کیا ہے بلکہ میں نے براہین میں جو کچھ مسیح بن مریم کے دوبارہ دنیا میں آنے کا ذکر لکھا ہے وہ ذکر صرف ایک مشہور عقیدہ کے لحاظ سے ہے جس کی طرف آج کل ہمارے مسلمان بھائیوں کے خیالات جھکے ہوئے ہیں۔سو اسی ظاہرؔ ی اعتقاد کے لحاظ سے میں نے براہین میں لکھ دیا تھا کہ میں صرف مثیل موعود ہوں۔اور میر ی خلافت صرف روحانی خلافت ہے لیکن جب مسیح آئے گا تو اس کی ظاہری اور جسمانی دونوں طور پر خلافت ہو گی یہ بیان جو براہین میں درج ہو چکا ہے صرف اُس سرسری پیروی کی وجہ سے ہے جو ملہم کو قبل از انکشاف اصل حقیقت اپنے نبی کے آثار مرویہ کے لحاظ سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 197
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 197
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/197/mode/1up
    لازم ہے کیونکہ جو لوگ خدائے تعالیٰ سے الہام پاتے ہیں وہ بغیر بُلائے نہیں بولتے اور بغیر سمجھائے نہیں سمجھتے اور بغیر فرمائے کوئی دعویٰ نہیں کرتے اور اپنی طرف سے کسی قسم کی دلیری نہیں کرسکتے اسی وجہ سے ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم جب تک خدائے تعالیٰ کی طرف سے بعض عبادات کے اداکرنے کے بارہ میں وحی نازل نہیں ہوتی تھی تب تک اہل کتاب کی سُنن دینیّہ پر قدم مارنابہتر جانتے تھے اور بر وقت نزول وحی اور دریافت اصل حقیقت کے اس کو چھوڑ دیتے تھے سو اسی لحاظ سے حضرت مسیح بن مریم کی نسبت اپنی طرف سے براہین میں کوئی بحث نہیں کی گئی تھی اب جو خدائے تعالیٰ نے حقیقت امر کو اس عاجز پر ظاہر فرمایا تو عام طور پر اس کا اعلان از بس ضروری تھا لیکن مجھے اگر کچھ افسوس ہے تو اؔ س زمانہ کے اُن مولوی صاحبان پر ہے کہ جنہوں نے قبل اس کے جو میر ی تحریر پر غور اور خوض کی نگاہ کریں ردّ لکھنے شروع کردئے ہیں مصنّفین اور محققین خوب سمجھتے ہیں کہ جس قدر حال کے بعض مولوی صاحبوں نے مجھے اپنی دیرینہ رائے کا مخالف ٹھہرایا ہے غور کرنے سے معلوم ہو گا کہ درحقیقت اتنی بڑی مخالفت نہیں ہے جس پر اتنا شور مچایا گیا میں نے صرف مثیل مسیح ہونے کا دعویٰ کیا ہے اور میرا یہ بھی دعویٰ نہیں کہ صرف مثیل ہونا میرے پر ہی ختم ہو گیا ہے بلکہ میرے نزدیک ممکن ہے کہ آئندہ زمانوں میں میرے جیسے اور دس ہزار بھی مثیل مسیح آجائیں ہاں اِس زمانہ کے لئے میں مثیل مسیح ہوں اور دُوسرے کی انتظار بے سُود ہے اور یہ بھی ظاہر رہے کہ یہ کچھ میرا ہی خیال نہیں کہ مثیل مسیح بہت ہو سکتے ہیں بلکہ احادیث نبویہ کا بھی یہی منشاء پایا جاتا ہے کیونکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ دنیا کے اخیر تک قریب تیس کے دجّال پیداہوں گے اب ظاہر ہے کہ جب تیس دجّال کا آنا ضروری ہے تو بحکم لِکُلِّ دجّال عیسٰیتیس مسیح بھی آنے چاہئیں پس اس بیا ن کے رُو سے ممکن اور بالکل ممکن ہے کہ کسی زماؔ نہ میں کوئی ایسا مسیح بھی آجائے جس پر حدیثوں کے بعض ظاہری الفاظ صادق آسکیں کیونکہ یہ عاجز اس دنیا کی حکومت اور بادشاہت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 198
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 198
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/198/mode/1up
    کے ساتھ نہیں آیا درویشی اور غربت کے لباس میں آیا ہے اور جبکہ یہ حال ہے تو پھر علماء کے لئے اشکال ہی کیا ہے ممکن ہے کہ کسی وقت اُن کی یہ مراد بھی پوری ہو جائے۔ہاں اُن کی یہ خاص مراد کشفًا و الہامًاوعقلًا وفرقانًا مجھے پوری ہوتی نظر نہیں آتی کہ وہ لوگ سچ مچ کسی دن حضرت مسیح بن مریم کو آسمان سے اُترتے دیکھ لیں گے سو انہیں اس بات پر ضد کرنا کہ ہم تب ہی ایمان لائیں گے کہ جب مسیح کو اپنی آنکھوں سے آسمان سے اُترتا ہوا مشاہدہ کریں گے ایک خطرناک ضد ہے اور یہ قول اُن لوگوں کے قول سے ملتا جُلتا ہے جن کا خود ذکر اللہ جلّشَانُہ‘ نے قرآن شریف میں فرمایا ہے کہ وہ حَتّٰى نَرَى اللّٰهَ جَهْرَةً ۱؂کہتے رہے اور ایمان لانے سے بے نصیب رہے۔
    اب میں نصیحتًا للّٰہ اپنے عزیز علما ء کی خدمت میں صحیحین کی وہ حدیثیں عرض کرنا چاہتا ہوں جن کی نسبت اُن کا خیال ہے کہ اُن سے ہمار ادعویٰ مسیح ابن مریم کے آسمان سے اُترنے کابخوبی ثابت ہوتا ہے اورؔ جن پر زور مار کر وہ باربار کہہ رہے ہیں کہ ان کو اپنے دعاوی کی اُن احادیث کی رُو سے ڈگری ملتی ہے سو وہ حدیثیں مع ترجمہ کے ذیل میں لکھتا ہوں۔
    ترجمہ
    صحیح بخاری صفحہ ۴۹۰
    والذی نفسی بیدہ لیوشکنّ ان ینزل فیکم ابن مریم حکمًا عدلًا فیکسرالصلیب ویقتل الخنزیر ویضع الحرب۔ کیف انتم اذا نزل ابن مریم فیکم امامکم منکم
    یعنی قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے کہ تم میں ابن مریم نازل ہو گا اور تمہارے ہریک مسئلہ مختلف فیہ کا عدالت کے ساتھ فیصلہ کرے گا اور باطل پرستوں کو الگ اور حق پرستوں کو الگ کردے گا پس وہ اِسی حَکَم ہونے کی وجہ سے صلیب کو توڑے گا اور خنزیروں کو مارے گا اور روز کے جھگڑوں کا خاتمہ کر دے گا۔تمہارا اُس دن کیا حال ہو گا جس دن ابن مریم تم میں نازل ہو گا اور تم جانتے ہو کہ ابن مریم کون ہے وہ تمہارا ہی ایک امام ہو گا اور تم میں سے ہی (اے اُمّتی لوگو) پیداہوگا۔
    ۱؂ البقرۃ:۵۶
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 199
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 199
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/199/mode/1up
    یہاں تک بخاری کی حدیث کا ترجمہ ہو چکا اور آپ لوگوں نے سمجھ لیا ہو گا کہ امام بخاری صاحب امامکم منکم کے لفظ سے کس طرف اشارہ کر گئے ہیں العاقل تکفیہ الاشارۃ اب مسلم کی حدیث کا ترجمہ متوجہ ہو کر سُنیں اور وہ یہ ہے۔
    صحیح ؔ مسلم
    وعن النواس بن سمعان قال ذکر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم الدجّال۔ فقال ان یخرج و انا فیکم فانا حجیجہ دونکم وان یخر ج ولست فیکم فکل امرء حجیج نفسہ واللہ خلیفتی علٰی کل مسلم انّہ شاب قطط عینہ طافیۃ کانّی اُشبِّھہٗ بعبد العزّٰی ابن قطن فمن ادرکہ منکم فلیقرء علیہ فواتح سورۃ الکہف فاؔ نھا جوارکم من فتنۃ
    ترجمہ
    اور نواس بن سمعان سے روایت ہے * کہ رسول خداصلعم نے دجال کا ذکر کر کے فرمایا کہ اگر میر ی زندگی میں دجّال نکل آوے تو میں تمہارے سامنے اس سے جھگڑوں گا ( یہ فقرہ آئندہ کی پیشگوئی کو جو ضرور مسیح ابن مریم کے نازل ہونے کے وقت دجّال نکلے گا ضعیف کرتا ہے بلکہ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ دراصل دجّال کے نکلنے کا کوئی خاص وقت مقرر نہیں کیا گیا تب ہی تو خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ابن صَیَّاد پر بھی دجّا ل ہونے کا گمان کیا تھا اُس وقت مسیح کہاں تھا ؟ ) اور پھر فرمایا اگر دجّال نکلا اور میں تم میں نہ ہوا تو ہریک شخص اپنی ذات سے اُس سے لڑے گا یعنی دلائل عقلیہ و شرعیہ کے ساتھ۔ اور فرمایا کہ میرے بعد خدائے تعالیٰ ہرایک مسلمان پر میرا خلیفہ ہے اور پھر فرمایا کہ اس کے بال بہت مڑے ہوئے ہیں اور آنکھیں پُھولی ہوئی گویا مَیں (عالم کشف میں)عبدالعزّٰی ابن قطن کے ساتھ اُس کو تشبیہ دیتا ہوں۔
    تشریح
    مُلّا علی قاری نے لکھا ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے دَجّا ل کو خواب یا کشف کی حالت میں دیکھا تھا اورچونکہ وہ ایک مثالی عالم ہے اس لئے
    *حاشیہ: بانی مبانی اس تمام روایت کا صرف نواس بن سمعان ہے اور کوئی نہیں ہے یہ بات نہایت عجیب ہے کہ اس روایت کی نسبت اجماع صحابہ کا خیال کیا جاتا ہے اور عنقریب معلوم ہوگا کہ یہ اور روایتوں کے برخلاف ہے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 200
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 200
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/200/mode/1up
    انہ خارج خلۃ بین الشام والعراق فعاث یمینًا وعاث شمالًا یا عباداللّٰہ فاثبتوا قلنا یا رسول اللّٰہ ما لبثہ فی الارض قال اربعون یومًا، یوم کسنۃ و یوم کشھر ویوم کجمعۃ وسائر ایامہ کایامکم، قلنا یا رسول اللّٰہ فذالک الیوم الذی کسنۃ اتکفینا فیہ صلٰوۃ یومٍ۔ قال لا اقدروا لہ قدرہ۔ قلنا یا رسول اللّٰہ وما اسراعہ فی الارض۔ قالؔ کالغیث استدبرتہ الریح فیاتی علی القوم فیدعوھم فیؤمنون بہ۔ فیامر السماء فتمطر والارض فتنبت فتروح علیھم سارحتھم اطول ما کانت
    آنحضرت صلعم نے اس کا حلیہ بیان کرنے کے وقت لفظ کَأَ نِّیْ یعنی گویا کا لفظ بتا دیا تا اس بات پر دلالت کرے کہ یہ رؤیت حقیقی رؤیت نہیں بلکہ ایک امر تعبیر طلب ہے۔ میں کہتا ہوں کہ اسی پر صحاح سِتّہ کی بہت سی حدیثیں یقینی اور قطعی دلالت کررہی ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو جو حضرت عیسیٰ اور دجا ل کی نسبت امور معلوم ہوئے تھے وہ حقیقت میں سب مکاشفات نبویہ تھے جو اپنے اپنے محل پر مناسب تاویل و تعبیر رکھتے ہیں اُنہیں میں سے یہ دمشقی حدیث بھی ہے جو مسلم نے بیان کی ہے جس کا اس وقت ہم ترجمہ کر رہے ہیں اور ہمارے اس بیان پر کہ یہ تما م پیشگوئیاں مکاشفات نبویہ ہیں اور رؤیا صالحہ کی طرح بالتزام قرائن محتاج تعبیر ہیں خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے بیانات مقدسہ شاہد ناطق ہیں۔ جیسا کہ یہ حدیث مندرجہ ذیل جو صحیحین میں درج ہے اور وہ یہ ہے۔
    وعن عبداللّٰہ بن عمر اَنّ رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ وسلم قال رایتُنی اللیلۃَ عند الکعبۃ فرأیت رجلا اٰدم کاحسن ما انت رأي من اُدم الرجال لہ لِمّۃ کاحسن ماانت راءٍ من اللمم قد رجّلھا فھی تقطر ماءً متکءًا علٰی عواتق رجلین یطوف بالبیت فسألتُ من ھذا فقالوا ھذاالمسیح ابن مریم قال ثم اذا انا برجل جعدٍ قططٍ اعورالعین الیمنٰی کان عینہ عنبۃ طافیۃ کاشبہ من رأیتُ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 201
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 201
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/201/mode/1up
    ذریً واسبغہ ضروعًا وامدہ۔ ثم یاتی القوم فیدعوھم فیردون علیہ قولہ فینصرف عنھم فیصبحون مملحین لیس بایدیھم شي ء من اموالھم ویمر بالخربۃ فیقول لھا اخرجی کنوزک فتتبعہ کنوزھا کیعاسیب النحلؔ ثم یدعو رجلًا ممتلءًا شبابًا فیضربہ بالسیف فیقطعہ جزلتین رمیۃ الغرص ثم یدعوہ فیقبل و یتھلل وجھہ یضحک فبینما ھو کذالک اذ بعث اللہ المسیح ابن مریم۔ فینزل عند المنارۃ البیضاء شرقی دمشق، بین مھزودتین واضعًا کفیہ علی اجنحۃ ملکین اذا طاطأ رأسہ قطر واذ ا رفعہ تحدّر منہ مثل جمان کاللؤلؤ فلا یحل لکافر یجد من ریح نفسہؔ الا مات ونفسہ ینتھی حیث ینتھی طرفہ فیطلبہ حتی یدرُکہ بباب لد فیقتلہ۔
    من الناس بابن قطن واضعا یدیہ علٰی منکبی رجلین یطوف بالبیت فسألتُ من ھذا فقالوا ھذا المسیح الدجّال متّفق علیہ وفی روایۃ قال فی الدجا ل رجل احمر جسیم جعد الراس اعور العین الیمنٰی اقرب الناس بہ شبھًا ابن قطن۔
    یعنی عبداللہ بن عمر سے روایت ہے کہ رسول خدا صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میں نے آج کی رات خواب میں یا ازراہِ مکاشفہ اپنے تئیں کعبہ کے پاس دیکھااور وہاں مجھے ایک شخص گندم گُوں نظر آیا جس کا رنگ گندم گوں مردوں میں سے اول درجہ کا معلوم ہوتا تھا اور اس کے بال ایسے صاف معلوم ہوتے تھے کہ جیسے کنگھی کی ہوتی ہے اور اُن میں سے پانی ٹپکتا ہے اور میں نے دیکھا کہ وہشخص دو آدمیوں کے مونڈھوں پر تکیہ کر کے خانہ کعبہ کا طواف کر رہا ہے۔ پس میں نے پوچھا کہ یہ کون ہے تو مجھے کہا گیا کہ یہ مسیح ابن مریم ہے پھر اُسی خواب میں ایک شخص پر میں گذرا جس کے بال مڑے ہوئے تھے اور دا ہنی آنکھ اُس کی کانی تھی گویا آنکھ اُس کی انگور ہے پُھولا ہوا بے نور اُن لوگوں سے بہت مشابہ تھا جو میں نے ابن قطن کے ساتھ دیکھے ہیں اوراس نے دونوں ہاتھ دو شخصوں کے مونڈھوں پر رکھے ہوئے تھے اور خانہ کعبہ کا طواف کر رہا تھا اور میں نے پوچھا کہ یہ کون شخص ہے ؟ لوگوں نے کہا کہ یہ مسیح دجا ل ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 202
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 202
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/202/mode/1up
    اب اس تمام حدیث پرنظرِغور ڈال کر معلوم ہوگا کہ جو کچھ د مشقی حدیث میں مسلم نے بیان کیا ہے اکثر باتیں اس کی بطور اختصار اس حدیث میں درج ہیں اور پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم نے صاف اور صریح طور پر اس حدیث میں بیان فر ما دیا ہے کہ یہ میرا ایک مکاشفہ یا ایک خواب ہے پس اس جگہ سے یقینی اور قطعی طور پر ثابت ہوتا ہے کہ وہ دمشق والی حدیث جو پہلے ہم لکھ آئے ہیں درحقیقت وہ بھی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک خواب ہی ؔ ہے۔ جیسا کہ اُس میں یہ اشارہ بھی کَاَ نِّی کا لفظ بیان کر کے کیا گیا ہے اور یہ حدیث جس میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم صاف اور صریح طور پر فرماتے ہیں کہ میرا یہ ایک کشف یا خواب ہے اس کو بخاری اور مسلم دو نوں نے اپنی صحیحین میں لکھا ہے اور علماء نے اس جگہ ایک اشکال پیش کرکے ایسے لطیف طور پر اس کا جواب دیا ہے جو ہمارے دعویٰ کا ایسا مؤید ہے کہ گویا ہم میں اور ہمارے مخالفین میں فیصلہ کر نے والا ہے اور وہ یہ ہے کہ اس حدیث میں جو متفق علیہ ہے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ میں نے مسیح ابن مریم کو خانہ کعبہ کاطواف کرتے دیکھا اور پھر بعد اس کے فر ما تے ہیں کہ ایسا ہی میں نے مسیح دجّال کو بھی خانہ کعبہ کا طواف کرتے دیکھا۔اس بیان سے یہ لازم آتا ہے کہ مسیح ابن مریم اور مسیح دجّال کا مدعا و مقصد ایک ہی ہو اور وہ دونوں صراط مستقیم پر چلنے والے اور اسلام کے سچے تابع ہوں حالانکہ دوسری حدیثوں سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ دجّال خدائی کا دعوٰی کرے گا پھر اس کو خانہ کعبہ کے طواف سے کیا کام ہے۔اِس کا علماء نے یہ جواب دیا ہے کہ ایسے الفاظ و کلمات کو ظاہر پر حمل کرنا بڑی غلطی ہے یہ تو درحقیقت مکاشفات اور خوابوں کے پیرایہؔ میں بیانات ہیں جن کی تعبیر و تا ویل کر نی چاہیئے جیسا کہ عام طور پر خوابوں کی تعبیر کی جاتی ہے سو اس کی تعبیر یہ ہے کہ طواف لُغت میں گرد پھر نے کو کہتے ہیں اور اس میں شک نہیں کہ جیسے حضرت عیسیٰ علیہ السلام اپنے نزول کے وقت میں اشاعت دین کے کام کے گرد پھریں گے اور اس کا انجام پذیر ہو جانا چاہیں گے ایسا ہی مسیح د جال بھی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 203
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 203
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/203/mode/1up
    اپنے ظہور کے وقت اپنے فتنہ اندازی کے کام کے گرد پھرے گا اور اُس کا انجام پذیر ہوجانا چاہے گا۔اب کہاں ہیں وہ حضرات مولوی صاحبان جو ان حدیثوں کے الفاظ کو حقیقت پر حمل کرنا چاہتے ہیں اور اُن کے معانی کو ظاہر عبارت سے پھیرنا کفر و الحاد سمجھتے ہیں ذرہؔ اپنے گریبان میں مُنہ ڈال کر دیکھیں کہ سلف صالح نے اس حدیث کے معنے کرنے کے وقت مسیح دجّال کے طواف کرنے کو ایک خواب کا معاملہ سمجھ کر کیسی اس کی تعبیر کر دی ہے جو ظاہر الفاظ سے بہت بعید ہے پھر جس حالت میں لا چار ہو کر اُن مکاشفات کی ایک جزو کی تعبیر کی گئی تو پھر کیا وجہ کہ با وجود مو جود ہونے قرائن قویہ کے دوسری جزوؔ ں کی تعبیر نہ کی جائے۔
    واضح ہو کہ جس طرح ہمارے علماء نے مسیح دجّال کے طواف کو ایک کشفی امر سمجھ کر اُس کی ایک روحانی تعبیر کردی ہے ایسا ہی خود جناب خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی مقامات میں ظاہر فرمادیا کہ جو کچھ میرے پر کشفی طور پر کھلتا ہے جب تک منجانب اللہ قطعی اور یقینی معنے اس کے معلوم نہ ہوں میں ظاہر پر حمل نہیں کر سکتا۔ مثلاً اس حدیث کو دیکھو جو صحیح بخاری کے صفحہ۵۵۱ میں درج ہے اور وہ یہ ہے حدثنا معلی قال حدثنا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 204
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 204
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/204/mode/1up
    وھیب عن ھشام بن عروۃ عن ابیہ عن عائشۃ ان النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال لھا اریتک فی المنام مرتین اریٰ انک فی سرقۃ من حریر و یقول ھٰذہ امرأتک فاکشف عنہا فاذا ھی انت فاقول ان یک ھذا من عند اللّٰہ یمضہ یعنی حضرت عائشہؓ سے روایت ہے کہ رسول خدا صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاکہ اے عائشہ تُو خواب میں مجھے دودفعہ دکھائی گئی اور میں نے تجھے ایک ریشم کے ٹکڑے پر دیکھا اور کہا گیا کہ یہ تیری عورت ہے اور میں نے اس کو کھو لا تو کیا دیکھتا ہوں کہ تُو ہی ہے اور میں نے کہا کہؔ اگر خدائے تعالیٰ کی طرف سے یہی تعبیر ہے جو میں نے سمجھی ہے تو ہو رہے گی یعنی خوابوں اور مکاشفات کی تعبیر ضرور نہیں کہ ظاہر پر ہی واقعہ ہو کبھی تو ظاہر پر ہی واقعہ ہو جا تی ہے اور کبھی غیر ظاہر پر وقوع میں آتی ہے سو اس جگہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے خواب کی سچائی میں شک نہیں کیا کیونکہ نبی کی خواب تو ایک قسم کی وحی ہوتی ہے بلکہ اُس کی طرز وقوع میں تردّد بیان کیا ہے کہ خدا جانے اپنی ظاہری صورت کے لحاظ سے وقوع میں آوے یا اُس کی اَور کوئی تعبیر پیدا ہو اور اس جگہ پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کے بیان سے یہ بھی بخوبی ثابت ہو گیا کہ جو وحی کشف یا خواب کے ذریعہ سے کسی نبی کو ہووے اس کی تعبیر کرنے میں غلطی بھی ہو سکتی ہے جیسا کہ اسی صفحہ۵۵۱ میں ایک دوسری حدیث میں ایسی غلطی کے بارے میں خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فر ما دیا ہے اور وہ یہ ہے قال ابو موسٰی عن النبی صلی اللہ علیہ وسلم رأیت فی المنام انی اھاجر من مکّۃ الٰی ارض بھا نخل فذھب وھلی الٰی انھا الیمامۃ او ھجر فاذا ھی المدینۃ یثرب۔ یعنی ابو موسٰیؑ سے روایت ہے جو پیغمبرخدا صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جو میں نے خواب میں دیکھا کہ میں مکہ سے ایسی زمین کی طرف ہجرتؔ کرتا ہوں جس میں کھجوریں ہیں پس میرا وہم اس طرف گیا کہ وہ یمامہ یا ہجر ہو گا مگر آخر وہ مدینہ نکلا جس کو یثرب بھی کہتے ہیں۔ اس حدیث میں بھی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 205
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 205
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/205/mode/1up
    صاف طور پر فر ما دیا کہ کشفی امور کی تعبیر میں انبیاء سے بھی غلطی ہو سکتی ہے اور ان احادیث سے بخوبی ظاہر ہو گیا کہ جو کچھ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے مسیح ابن مریم اور مسیح دجّال کی نسبت پیشگوئیاں فرمائی ہیں حقیقت میں وہ سب مکاشفات نبویہ ہیں اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے احادیث مذکورہ بالا میں صریح اور صاف طور پر اس بات کی طرف اشارہ بھی کردیا کہ ان مکاشفات کو صرف ظاہر پر حمل نہ کر بیٹھنا ان کی روحانی تعبیریں ہیں اور یہ سب امور اکثر روحانی ہیں جو ظاہری اشکال میں متمثل کر کے دکھلائے گئے ہیں مگر افسوس کہ ہمارے آج کل کے علماء ہمارے سیّد و مولےٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے نقش قدم پر چلنا نہیں چاہتے اور خواہ نخواہ کشفی استعارات کو حقیقت پر حمل کر نا چاہتے ہیں۔
    واضح ہو کہ عالم کشف میں بڑے بڑے عجائبات ہو تے ہیں اور رنگارنگ کی تمثیلات دکھائی دیتی ہیں بعض اوقات عالم کشف میں ایسی چیزیں مجسم ہو کر نظرآجاتی ہیں کہ دراصل وہ رو حا نی ہو تی ہیں اور بعض وقت انسانؔ کی شکل پر کوئی چیز دکھائی دیتی ہے اوردر اصل وہ انسان نہیں ہوتا مثلاََ زرارہ صحابی کا نعمان بن المنذر کو جو ایک عرب کا بادشاہ تھا تمام تر آرائش کے ساتھ خواب میں دیکھنا اور اس کی تعبیر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ فرمانا کہ اس سے مراد ملک عرب ہے جو پھر اپنی زینت اور آرائش کی طرف عود کر آیا ہے یہ صریح اس بات کی دلیل ہے کہ کشفی امور میں کہیں کی کہیں تعبیر چلی جا تی ہے۔چنانچہ اس عاجز کو بھی اس بات کا ذاتی تجربہ ہے کہ بعض اوقات خواب یا کشف میں روحانی امور جسمانی شکل پر متشکل ہو کر مثل انسان نظر آجاتے ہیں مجھے یاد ہے کہ جب میرے والد صاحب غفراللّٰہ لہ جو ایک معزز رئیس اور اپنی نواح میں عزت کے ساتھ مشہور تھے انتقال کر گئے تو اُن کے فوت ہونے کے بعد دوسرے یا تیسرے روز ایک عورت نہایت خوبصورت خواب میں میَں نے دیکھی جس کا حُلیہ ابھی تک میری آنکھوں کے سامنے ہے اور اس نے بیان کیا کہ میرا نام رانی ہے اور مجھے اشارات سے کہا کہ میں اس گھر کی عزت اور وجاہت ہوں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 206
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 206
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/206/mode/1up
    اور کہا کہ میں چلنے کو تھی مگر تیرے لئے رہ گئی۔اُنہیں دنوں میں میَں نے ایک نہایت خوبصورت مرددیکھا اور میں نے اُسے کہا کہ تم ایک عجیب خوبصورت ہو تب اُس نے اشارہ سے میرؔ ے پرظاہر کیا کہ میں تیرا بخت بیدار ہوں اور میرے اس سوال کے جواب میں کہ تُو عجیب خوبصورت آدمی ہے اُس نے یہ جواب دیا کہ ہاں میں درشنی آدمی ہوں اور ابھی تھو ڑے دن گذرے ہیں کہ ایک مدقوق اور قریب الموت انسان مجھے دکھائی دیا اور اس نے ظاہر کیا کہ میرا نام دین محمد ہے اور میرے دل میں ڈالا گیا کہ یہ دینِ محمدی ہے جو مجسم ہو کر نظر آیا ہے اور میں نے اس کو تسلی دی کہ تو میرے ہاتھ سے شفا پا جا ئے گا۔علیٰ ہذاالقیاس کبھی اعمال نیک یا بد بھی اشکال جسمانیہ میں نظر آجا یا کر تے ہیں اور قبر میں اعمال کا متشکل ہو کر نظر آنا عام عقیدہ مسلمانوں کا ہے اِسی بنا پر آنحضرت صلعم خوابوں کی تعبیر میں اشخاص مرئیہ کے ناموں سے اشتقاق خیر یا شرکا کر لیا کرتے تھے۔
    اب پھر ہم دمشقی حدیث کے بقیہ ترجمہ کی طرف رجوع کرکے لکھتے ہیں کہ آنحضرت صلعم نے فرمایا کہ جو شخص تم میں سے اس کو یعنی دجّال کو پاوے تو چاہیئے کہ اس کے سامنے سورۂ کہف کی پہلی آیتیں پڑھے کہ اِس میں اُس کے فتنہ سے امان ہے۔ یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ جہاں تک ہو سکے اصحاب کہف کی طرح استقامت اختیارکرے کیونکہ ان آیتوں میں اُن لوگوں کی استقامت کا ہی ذکر ہے جو ایک مشرک بادشاہ کے ظلم سے ڈر کر ایک غار میں چھپ گئے تھے (اے میرے دوستو!اب تم بھی ان آیات کو پڑھا کرو کہ بہت سے دجّال تمہارے سامنے ہیں ) پھرؔ فرمایا رسول نبی اُمّی نے فداءً لَہٗ اَبی وَاُمِّیْ کہ دجّال اس راہ سے نکلنے والا ہے کہ جو شام اور عراق کے درمیان واقعہ ہے۔اور دائیں بائیں فساد ڈالے گا ( یہ بھی ایک استعارہ ہے جیساکہ مکاشفات میں عام طور پر استعارات وکنایات ہؤاکرتے ہیں ) پھر بعد اس کے فرمایا کہ اے اللہ کے بندو!تم نے اُس وقت ثابت رہنا یعنی جیسے اصحاب الکہف ثابت قدم رہے تھے۔ راوی کہتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 207
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 207
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/207/mode/1up
    کہ یا رسول اللہ کس مّدت تک دجّال دنیا میں ٹھہرے گا تو آپ نے فرمایا کہ چالیس دن۔ لیکن شَرح السنّۃ میں اسما ء بنت یزید سے روایت ہے کہ چالیس برس ٹھہرے گا مگر درحقیقت اِن روایات میں کسی قسم کا اختلاف یا تناقض نہیں سمجھنا چاہیئے اور اس با ت کا علم حوالہ بخدا کرنا چاہیئے کہ اِن چالیس دن یا چالیس برس سے کیا مراد ہے۔
    اورمسلم کی حدیث کا بقیہ ترجمہ یہ ہے کہ دجّال کا ایک دن برس کے برابر ہو گا اور ایک دن ایک مہینے کے برابر اور ایک دن ہفتہ کے برابر باقی دن معمولی دنوں کے موافق (یہ سب استعارات و کنایات ہیں ) پھر راوی کہتا ہے کہ ہم نے عرض کی کہ کیا اُن لمبے * دنو ں میں ایک دن کی نماز پڑھنا کافی ہوگا توآپ نے فرمایا کہ نہیں بلکہ نماز کے وقتوں کے مقداؔ ر پر اندازہ کرلیا کرنا (واضح ہو کہ یہ بیان پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کا علیٰ سبیل الاحتمال ہے یعنی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بلحا ظ وسعت قدرت الٰہی کشفی امر کو مطابق سوال سائل کے ظاہر پر محمول کر کے جواب دے دیاہے ورنہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم حدیث عائشہ رضی اللہ عنھا میں جو بخاری کے صفحہ ۵۵۱ میں درج ہے صاف طور پر تصریح فرما چکے ہیں کہ مکاشفات کی تعبیر کبھی تو ظاہر پر اورکبھی غیر ظاہر پر وقوع میں آ جایا کرتی ہے اور درحقیقت یہی مذہب تمام انبیا واولیاء کا آج تک چلا آیا ہے سو یہ جواب جو نمازوں کا اندازہ کرلیا کرنا آپ نے فرمایا یہ سائل کے فہم اور استعداد اور رجوع خیال کے موافق برطبق
    * حاشیہ۔ لمبے دنوں سے مراد تکلیف اور مصیبت کے دن بھی ہوتے ہیں بعض مصیبتیں ایسی دردؔ ناک ہوتی ہیں کہ ایک دن ایک برس کے برابر دکھائی دیتا ہے اور بعض مصیبتیں ایسی کہ ایک دن ایک مہینہ کی مانند معلوم ہوتاہے اور بعض مصیبتوں میں ایک دن ایک ہفتہ جیسا لمبا سمجھا جاتا ہے۔ پھر رفتہ رفتہ صبر پیدا ہوجانے سے وہی لمبے دن معمولی دن دکھائی دینے لگتے ہیں اور صبر کرنے والوں کے لئے آخر وہ گھٹائے جاتے ہیں غرض یہ ایک استعارہ ہے اس پر غور کرو کہ درحقیقت یہ لمبے دن ایسے ہی ہیں جیسے آپ نے فرمایا تھا کہ میری بیویوں میں سے پہلے وہ فوت ہو گی جس کے لمبے ہاتھ ہیں۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 208
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 208
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/208/mode/1up
    تکلّمواالنّاس علٰی قدرعقولہم کے دیا گیا ورنہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کسی کشفی امر کو جب تک خدائے تعالیٰ خاصؔ طور پر ظاہر نہ کرے کبھی ظاہری معنوں تک محدود نہیں سمجھتے تھے جیسا کہ صدہا احادیث میں یہ طریق اورعادت نبویہ مقدسہ ثابت ہو رہی ہے)۔
    پھر راوی کہتا ہے کہ ہم نے عرض کی کہ یا رسول اللہ! دجّال کس قدر جلد زمین پر چلے گا اور اس کے جلد چلنے کی کیفیت کیا ہے تو آپ نے فرمایا کہ اُس مینہ کی طرح تیز چلے گا جس کے پیچھے ہوا ہو یعنی ایک دم میں ہزاروں کوس پھر جائے گااور ایک قوم پر گذر کر اُن کو اپنے دین کی طرف دعوت کرے گا اور وہ اُس پر ایمان لے آویں گے تب وہ بادل کو حکم کرے گا تا اُن کے لئے مینہ برساوے اور زمین کو حکم کرے گا تا اُن کے لئے کھیتیاں اُگاوے۔ (یہ سارے استعارات ہیں ہوشیار رہو دھوکا نہ کھانا ) پھر فرمایا کہ ایسا ہو گا کہ وقت پر بارشیں ہونے کی وجہ سے جو مویشی صبح چرنے کے لئے جاویں گے وہ شام کو ایسے تازہ و توانا ہو کر آئیں گے کہ بوجہ فربہی کوہان اُن کی دراز ہو جائیں گی اور پستان دُودھ سے بھر جائیں گے اوربباعث بہت سیر شکم ہونے کے کوکیں کھچی ہوئی ہوں گی۔
    پھر دجّال ایک اور قوم کی طرف جائے گا اوراپنی اُلوہیت کی طرف اُن کو دعوتؔ کرے گا پھر وہ لوگ اُس کی دعوت کو قبول نہیں کریں گے اور اُس پر ایمان نہیں لاویں گے۔سو دجّال اُن سے بارش کو روک لے گا اورزمین کو کھیتی نکالنے سے بند کر دے گا اور وہ قحط کی بلا میں مبتلا ہوجائیں گے اور کھانے پینے کے لئے اُن کے پاس کچھ نہ رہے گا۔پھر دجّال ایک ویرانہ پر گذرے گا اور اس کو کہے گا کہ اپنے خزانوں کو نکال۔ تب فی الفور سب خزانے اُس ویرانہ سے نکل کر اُس کے پیچھے پیچھے ہو لیں گے اورایسے اُس کے پیچھے چلیں گے جیسے شہد کی مکھیاں اُس بڑی مکھی کے پیچھے چلتی ہیں جو اُن کی سردار ہوتی ہے۔پھر دجّال ایک شخص کو بلا ئے گا جو اپنی جوانی میں بھراہواہوگا اور اُس کو تلوار سے قتل کردے گا۔اور اُس کے دوٹکڑے کر کے تِیر کی مارپر علیحدہ علیحدہ پھینک دے گا پھر اس کی لاش کو بُلائے گا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 209
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 209
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/209/mode/1up
    تب وہ شخص زندہ ہو کرایک روشن اور چمکتے ہوئے چہرہ کے ساتھ اس کے سامنے آ جائے گا اور اس کی الوہیّت سے انکارکرے گا سو دجّال اِسی قسم کی گمراہ کرنے کی کوشش میں لگا ہواہو گا کہ ناگہاں مسیح بن مریم ظاہر ہو جائے گا اور وہ ایک منارہ سفید کے پاس دمشق کے شرقی طرف اُترے گا مگر ابن ماجہ کا قول ہے کہ وہ بیت المقدس میں اُترے گا اور بعض کہتے ہیں کہ نہ بیت المقدس اور نہ دمشق بلکہ مسلمانوؔ ں کے لشکر میں اترے گا جہاں حضرت مہدی ہوں گے۔
    اورپھرفرمایا کہ جس وقت وہ اُترے گا اُس وقت اس کی زرد پوشاک ہوگی۔یعنی زردرنگ کے دو کپڑے اُس نے پہنے ہوئے ہوں گے (یہ اس بات کی طرف اشارہ معلوم ہوتا ہے کہ اُس وقت اُس کی صحت کی حالت اچھی نہیں ہوگی ) اور دونوں ہتھیلی اُس کی دو فرشتوں کے بازوؤں پرہوں گی۔مگر بخاری کی ایک دوسری حدیث میں ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ابن مریم کو بجائے دوفرشتوں کے دو آدمیوں کے کندھوں پر ہاتھ رکھ کر طواف کرتے دیکھا۔ پس اِس حدیث سے نہایت صفائی سے یہ بات کھلتی ہے کہ دمشقی حدیث میں جو دو فرشتے لکھے ہیں وہ دراصل وہی دو آدمی ہیں کہ دوسری حدیث میں بیان کئے گئے ہیں اور اُن کے کندھوں پر ہاتھ رکھنے سے مطلب یہ ہے کہ وہ مسیح کے مددگاراور انصار ہوجائیں گے۔
    اور پھر فرمایا کہ جس وقت مسیح اپنا سر جھکائے گا تو اُس کے پسینہ کے قطرات مترشح ہوں گے اور جب اُوپر کو اُٹھائے گا تو بالوں سے قطرے پسینہ کے چاندی کے دانوں کی طرح گریں گے جیسے موتی ہوتے ہیں اور کسی کافر کے لئے ممکن نہیں ہو گا کہ اُن کے دم کی ہو اپاکر جیتارہے بلکہ فی الفور مرجائے گا اورؔ دم اُن کا اُن کی حّدِ نظر تک پہنچے گا۔پھر حضرت ابن مریم دجّال کی تلاش میں لگیں گے اور لُدّ کے دروازہ پر جو بیت المقدس کے دیہات میں سے ایک گاؤں ہے اس کو جاپکڑیں گے اور قتل کر ڈالیں گے۔تمّت ترجمۃ الحدیث۔ یہ وہ حدیث ہے جو صحیح مسلم میں امام مسلم صاحب نے لکھی ہے جس کو ضعیف سمجھ کر رئیس المحدثین
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 210
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 210
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/210/mode/1up
    امام محمد اسمٰعیل بخاری نے چھوڑدیا ہے اس جگہ حیرانی کا یہ مقام ہے کہ جو کچھ دجّال کے حالات و صفات اس حدیث میں لکھے گئے ہیں اور جس طرز سے اُس کے آنے کی خبر بتائی گئی ہے یہ بیان دوسری حدیثوں کے بیان سے بالکل منافی اور مبائن اور مخالف پایا جاتا ہے کیونکہ صحیحین میں یہ حدیث بھی ہے وعن محمد بن المنکدر قال رأیت جابر ابن عبداللّٰہ یَحلف باللّٰہ ان ابن صیّاد الدجال قلت تحلف باللّٰہ قال انی سمعت عمریحلف علٰی ذلک عند النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم فلم ینکرہ النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم متفق علیہ اور ایک دوسری حدیث یہ بھی ہے عن نافع قال کان ابن عمر یقول واللّٰہ ما اشک ان المسیح الدجّال ابن صیّاد رواہ ابوداؤد والبیھقی فی کتاب البعث والنشور۔
    پہلی ؔ حدیث کا ترجمہ یہ ہے کہ محمد بن منکدر تابعی سے روایت ہے کہ کہا کہ میں نے جابربن عبداللہ کو دیکھا کہ خدائے تعالیٰ کی قسم کھاتا تھا کہ ابن صیّاد ہی دجّال معہود ہے اور محمد بن منکدر کہتا ہے کہ میں نے جابر کو کہا کہ کیاتو خدائے تعالیٰ کی قسم کھاتا ہے یعنی یہ امر تو ظّنی ہے نہ یقینی پھر قسم کیوں کھاتا ہے۔جابرنے کہا کہ میں نے عمر کو بحضور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اسی بارہ میں قسم کھاتے سُنا یعنی عمر رضی اللہ عنہ پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کے رُوبروقسم کھا کر کہا کرتا تھا کہ ابن صیّاد ہی دجّال معہودہے۔پھردوسری حدیث کا ترجمہ یہ ہے کہ نافع سے روایت ہے کہ ابن عمرؓ کہتے تھے کہ مجھے قسم ہے اللہ کی کہ میں ابن صیّاد کے مسیح دجّال ہونے میں شک نہیں کرتا۔پھرایک اور حدیث میں جو شرح السنہ میں لکھی ہے یہ فقرہ درج ہے لم یزل رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم مشفقًا انہ ھو دجّال یعنی ہمیشہ پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم اس خوف میں تھے کہ ابن صیّاد، دجّال ہوگا یعنی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا ہمیشہ گمان غالب یہی رہا کہ ابن صیّاد ہی دجّال ہے۔ اب جبکہ خاص صحیح بخاری اور صحیح مسلم کے بیان سے ثابت ہو گیا ابن صیّاد ہی دجّالؔ معہود ہے بلکہ صحابہ نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 211
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 211
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/211/mode/1up
    قسمیں کھا کر کہا کہ یہی دجّال معہود ہے تو کیا اس کے دجّال معہود ہونے میں کچھ شک رہ گیا ہے۔اب ابن صیّاد کا حال سنیے کہ اس کا انجام کیا ہوا سو یہ مسلم کی حدیث سے واضح ہوتا ہے اور وہ یہ ہے وعن ابی سعید الخدری قال صحبت ابن صیّاد الٰی مکّۃ فقال لی ما لقیت من الناس یزعمون انّی الدجال الست سمعت رسول اللہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم یقول انہٗ لا یُوْلَدُ لہ وقد ولد لی الیس قد قال وھو کافر وانا مسلم اولیس قد قال لا یدخل المدینۃ ولامکّۃ وقد اقبلت من المدینۃ وانا ارید مکّۃ۔*اورابو سعید خدری سے روایت ہے کہ میں نے بہمراہی ابن صیّاد کے بعزم مکہ سفر کیا۔ تب اُس سفر میں ابن صیّاد نے مجھ کو کہا کہ لوگوں کی یعنی صحابہ رضی اللہ عنہم کی ان باتوں سے مجھے بہت ایذا پہنچتا ہے کہ وہ خیال کرتے ہیں کہ دجّال معہود میں ہی ہوں اور تم جانتے ہو کہ اصل حقیقت اس کے برخلاف ہے تو نے سُنا ہو گا کہ رسول اللہ صلی ؔ اللہ علیہ وسلم فرمایا کرتے تھے کہ دجّال لاولد رہے گا اور میں صاحب اولاد ہوں اور نیز آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاتھا کہ دجّال کافر ہو گا اور میں مسلمان ہوں اور فرمایاتھا کہ دجّال مدینہ اور مکّہ میں داخل نہیں ہو سکے گا۔اور میں مدینہ سے توآیا ہوں اور مکّہ کی طرف چلا جاتا ہوں۔
    اب دیکھنا چاہئے کہ یہ کیسا عجیب معاملہ ہے کہ بعض صحابہ قسمیں کھا کر کہتے ہیں کہ ابن صیّاد ہی دجّال ہے اور صحیحین میں بروایت جابرلکھا ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت عمرؓ کے قسم کھانے پر کہ دجّال معہود یہی شخص ہے خاموشی اختیار کرکے اپنی رائے ظاہرکردی کہ درحقیقت دجّال معہود ابن صیّاد ہی تھا اور صحیح مسلم میں ابن صیّاد کا مشرف باسلام ہونا
    * حاشیہ۔ ابنؔ صیّاد کا یہ بیان کہ لوگ مجھے دجّال معہود سمجھتے ہیں صاف دلیل اس بات پر ہے کہ تمام صحابہ رضی اللہ عنہ اس کو دجّال معہود سمجھتے تھے نہ کوئی اور دجال۔ اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ صحابہ رضی اللہ عنہم کا اسی بات پر اجماع ہوگیا تھا کہ ابن صیّاد ہی دجّال معہود ہے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 212
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 212
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/212/mode/1up
    اور صاحب اولاد ہونا اورمکہ اورمدینہ میں جانا بوضاحت تمام لکھا ہے اور نہ صرف یہی بلکہ انہی حدیثوں میں یہ بھی لکھا ہے کہ ابن صیّاد مدینہ منوّرہ میں فوت ہوگیااور اس پر نماز پڑھی گئی۔ اب ہریک منصف بنظر انصاف دیکھ سکتا ہے کہ جن کتابوں میں دجّال کے آخری زمانہ میں ظاہر ہونے اور حضرت عیسیٰ کے ہاتھ سے مارے جانے کی خبر لکھی ہے انہیں کتابوں میں یہ بھی لکھا ہوا موجو دؔ ہے کہ دجّال معہود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں ہی ظاہر ہو گیا تھا اور مشرف باسلام ہوکر فوت ہوگیا تھااور اس کا مشر ف باسلام ہونا بھی ازرو اس پیشگوئی کے ضروری تھا جو بخاری اور مسلم میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے بہ پیرایہ ایک خواب کے بیان ہو چکی ہے کیونکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اُس کو عالم رؤیا میں خانہ کعبہ کا طواف کرتے دیکھا تھا بہرحال جبکہ انہیں حدیثوں میں دجّال معہود کا اس طرح پر فیصلہ کیا گیا ہے تو پھر دوسری حدیثوں پر جو اُن کی ضدّ واقع ہیں کیوں کر اعتبار کیا جائے ہاں اگر علماء اِن حدیثوں کو صحیح بخاری اور صحیح مسلم اور دوسری صحاح سے موضوع ٹھہرا کر خارج کر دیں تو البتہ اُن کے دعویٰ کے لئے ایک بنیاد پیداہو سکتی ہے ورنہ اذا تعارضا تساقطا پر عمل کر کے دونوں قسم کی حدیثوں کو ساقط ازاعتبار کرنا چاہیئے اور اس مقام میں زیادہ تر تعجب کی یہ جگہ ہے کہ امام مسلم صاحب تو یہ لکھتے ہیں کہ دجّال معہود کی پیشانی پر ک ف ر لکھا ہواہو گا مگر یہ دجّال تو انہیں کی حدیث کی رُو سے مشرف باسلام ہوگیا پھرمسلم صاحب لکھتے ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہےؔ کہ دجا ل معہود بادل کی طرح جس کے پیچھے ہواہوتی ہے مشرق مغرب میں پھر جائے گا مگر یہ دجّال تو جب مکہ سے مدینہ کی طرف گیا تو ابی سعید سے کچھ زیادہ نہیں چل سکا جیساکہ مسلم کی حدیث سے ظاہر ہے۔ایسا ہی کسی نے اس کی پیشانی پر ک ف ر لکھا ہوا نہیں دیکھا۔اگر ابن صیاد کی پیشانی پر ک ف ر لکھا ہوا ہوتا تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو اس کے قتل کرنے سے کیوں منع کرتے اورکیوں فرماتے کہ ہمیں اس کے حال میں ابھی تک
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 213
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 213
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/213/mode/1up
    اشتباہ ہے اگر یہی دجّال معہود ہے تو اس کا صاحب عیسیٰ بن مریم ہے جو اسے قتل کرے گا ہم اس کو قتل نہیں کر سکتے تعجب تو یہ ہے کہ اگر ابن صیّاد کی پیشانی پر ک ف ر لکھا ہوا نہیں تھا تو اس پر شک کرنے کی کیا وجہ تھی اور اگر لکھاہوا تھا تو پھر اس کو دجّال معہود یقین نہ کرنے کا کیا سبب تھا۔ لیکن دوسری حدیثوں سے ظاہر ہے کہ بالآخر اُس پر یقین کیا گیا کہ یہی دجّال معہود ہے۔ چنانچہ صحابہ رضی اللہ عنہم نے قسمیں کھا کر کہا کہ ہمیں اب اِس میں شک نہیں کہ یہی دجّال معہود ہے اورآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی آخرکار یقین کرلیا مگر یہ غورکرنے کا مقام ہے کہ اگر یہ حدیث صحیح ہے کہ دجا ل کی پیشانی پر ک ف ر لکھا ہوا ہو گا تو پھر اوائل دنوں میں ابن صیّاد کیؔ نسبت خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کیوں شک اور تردّد میں رہے اور کیوں یہ فرمایا کہ شاید یہی دجّال معہود ہو اوریا شاید کوئی اَورہو۔گمان کیا جاتا ہے کہ شاید اُس وقت تک ک ف ر اس کی پیشانی پر نہیں ہو گا۔میں سخت متعجب اور حیران ہوں کہ اگر سچ مچ دجّال معہود آخری زمانہ میں پیداہونا تھا یعنی اُس زمانہ میں کہ جب مسیح بن مریم ہی آسمان سے اُتریں تو پھر قبل از وقت یہ شکوک اور شبہات پیدا ہی کیوں ہوئے اور زیادہ تر عجیب یہ کہ ابن صیّاد نے کوئی ایسا کام بھی نہیں دکھایا کہ جو دجّال معہود کی نشانیوں میں سے سمجھا جاتا یعنی یہ کہ بہشت اور دوزخ کا ساتھ ہونا اور خزانوں کا پیچھے پیچھے چلنا اور مُردوں کا زندہ کرنا اوراپنے حکم سے مینہ کو برسانا اورکھیتوں کو اُگانا اور ستر باع کے گدھے پر سوار ہونا۔
    اب بڑی مشکلات یہ درپیش آتی ہیں کہ اگر ہم بخاری اورمسلم کی اُن حدیثوں کو صحیح سمجھیں جو دجّال کو آخری زمانہ میں اُتار رہی ہیں تو یہ حدیثیں اُن کی موضوع ٹھہرتی ہیں اوراگر اِن حدیثوں کو صحیح قرار دیں تو پھر اُن کا موضو ع ہونا ماننا پڑتا ہے اگر یہ متعارض و متناقض حدیثیں صحیحین میں نہ ہوتیں صرف دوسری صحیحوں میں ہوتیں توشائد ہم اِن دونوؔ ں کتابوں کی زیادہ تر پاس خاطر کرکے اُن دوسری حدیثوں کو موضوع قرار دیتے مگر اب مشکل تو یہ آپڑی ہے کہ اِنہیں دونوں کتابوں میں یہ دونوں قسموں کی حدیثیں موجودہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 214
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 214
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/214/mode/1up
    اب جب ہم اِن دونوں قسم کی حدیثوں پرنظر ڈال کر گردابِ حیرت میں پڑجاتے ہیں کہ کس کو صحیح سمجھیں اور کس کو غیر صحیح۔تب عقل خداداد ہم کو یہ طریق فیصلہ بتلاتی ہے کہ جن احادیث پر عقل اور شرع کا کچھ اعتراض نہیں اُنہیں کو صحیح سمجھنا چاہیئے سو اس طریق فیصلہ کی رُو سے یہ حدیثیں جو ابن صیّاد کے حق میں وارد ہیں قرین قیاس معلوم ہوتی ہیں کیونکہ ابن صیّاد اپنے اوائل ا ّ یام میں بے شک ایک دجّال ہی تھا اور بعض شیاطین کے تعلق سے اُس سے امور عجیبہ ظاہر ہوتے تھے جس سے اکثر لوگ فتنہ میں پڑتے تھے لیکن بعد اس کے خداداد ہدایت سے وہ مشرف باسلام ہو گیا اور شیطانی طریق سے نجات پاگیا اور جیسا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے خانہ کعبہ کا طواف کرتے اُسے دیکھا تھا ایسا ہی اُس نے طواف بھی کرلیا اور اُس کے معاملہ میں کوئی ایساامرنہیں جو قانون قدرت اور عقل سے باہر ہو اور نہ اُس کی تعریف میں ایساغلو کیاؔ گیا ہے جو شرک میں داخل ہو لیکن جب ہم اُن دوسری حدیثوں کو دیکھتے ہیں جو دجّال معہود کے ظاہر ہونے کا وقت اِس دنیا کا آخری زمانہ بتلاتی ہیں تو وہ سراسر ایسے مضامین سے بھری ہوئی معلوم ہوتی ہیں کہ جونہ عند العقل درست و صحیح ٹھہر سکتی ہیں اور نہ عند الشرع اسلامی توحید کے موافق ہیں چنانچہ ہم نے قسم ثانی کے ظہور دجّال کی نسبت ایک لمبی حدیث مُسلم کی لکھ کر معہ اُس کے ترجمہ کے ناظرین کے سامنے رکھ دی ہے ناظرین خود پڑھ کر سوچ سکتے ہیں کہ کہاں تک یہ اوصاف جو دجّال معہود کی نسبت لکھے ہیں عقل اور شرع کے مخالف پڑے ہوئے ہیں یہ بات بہت صاف اور روشن ہے کہ اگر ہم اس دمشقی حدیث کو اُس کے ظاہری معنوں پر حمل کرکے اس کو صحیح اور فرمودہ خدااوررسول مان لیں تو ہمیں اس بات پر ایمان لانا ہو گاکہ فی الحقیقت دجّال کو ایک قسم کی قوت خدائی دی جائے گی اور زمین و آسمان اُس کا کہا مانیں گے اور خدائے تعالیٰ کی طرح فقط اس کے ارادہ سے سب کچھ ہوتا جائے گا بارش کو کہے گا ہو تو ہو جائے گی بادلوں کو حکم دے گا کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 215
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 215
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/215/mode/1up
    فلاں ملک کی طرف چلے جاؤ تو فی الفور چلے جائیں گے زمین کے بخارات اس کے حکم سے آسمان کی طرف اُٹھیں گے اورؔ زمین گو کیسی ہی کلّر وشور ہو فقط اُس کے اشارہ سے عمدہ اور اوّل درجہ کی زراعت پیداکرے گی غرض جیسا کہ خدائے تعالیٰ کی یہ شان ہے کہ
    ۱؂‏اِنَّمَاۤ اَمْرُهٗۤ اِذَاۤ اَرَادَ شَیْـًٔـا اَنْ يَّقُوْلَ لَهٗ كُنْ فَيَكُوْنُ
    اِسی طرح وہ بھی كُنْ فَيَكُوْنُ سے سب کچھ کردکھائے گا۔ مارنا زندہ کرنا اُس کے اختیار میں ہو گا بہشت اور دوزخ اُس کے ساتھ ہوں گے غرض زمین اور آسمان دونوں اُس کی مُٹھی میں آجائیں گے اور ایک عرصہ تک جو چالیس برس یا چالیس دن ہیں بخوبی خدائی کا کام چلائے گا اور الوہیت کے تمام اختیار و اقتداراُس سے ظاہرہوں گے۔
    اب میں پوچھتا ہوں کہ کیا یہ مضمون جو اس حدیث کے ظاہر لفظوں سے نکلتا ہے اس موحدانہ تعلیم کے موافق و مطابق ہے جو قرآن شریف ہمیں دیتا ہے کیاصدہا آیات قرآنی ہمیشہ کے لئے یہ فیصلہ ناطق نہیں سُناتیں کہ کسی زمانہ میں بھی خدائی کے اختیارات انسان ہالکۃ الذات باطلۃ الحقیقت کو حاصل نہیں ہو سکتے۔ کیا یہ مضمون اگر ظاہر پر حمل کیا جائے تو قرآنی توحید پر ایک سیاہ دَھبّہ نہیں لگاتا ؟ تعجب کہ ایک طرف ہمارے بھائی موحدین اس بات کی شیخی مارتے ہیں کہ ہم نے شرک سے بکلّی کنارہ کیا ہے اور دوسرے لوگؔ مشرک اور بدعتی اور ہم موحّد اور متبع سُنت ہیں اور ہرایک کے آگے بکمال فخر اپنے اس موحّدانہ طریق کی ستائش اور تعریف بھی کرتے ہیں پھر ایسے پُر شرک اعتقادات اُن کے دلوں میں جمے ہوئے ہیں کہ ایک کافر حقیر کو الوہیت کا تمام تخت و تا ج سپرد کررکھا ہے اور ایک انسان ضعیف البنیان کو اپنی عظمتوں اور قدرتوں میں خدائے تعالیٰ کے برابر سمجھ لیا ہے۔اولیاء کی کرامات سے منکر ہو بیٹھے مگر دجّال کی کرامات کا کلمہ پڑھ رہے ہیں اگر ایک شخص اُنہیں کہے کہ سیّد عبدالقادر جیلانی قدس سرّہٗ نے باراں برس کے بعد کشتی غرق ہوئی ہوئی زندہ آدمیوں سے بھری ہوئی نکالی تھی اور ایک دفعہ
    ۱؂ یٰسٓ: ۸۳
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 216
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 216
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/216/mode/1up
    ملک الموت کی ٹانگ توڑ دی تھی اس غصّہ سے کہ وہ بلا اجازت آپ کے کسی مُرید کی روح نکال کر لے گیا تھا تو اِن کراماتوں کو ہرگز قبول نہیں کریں گے بلکہ ایسی مناجاتوں کے پڑھنے والوں کو مشرک بنائیں گے لیکن دجّال ملعون کی نسبت کھلے کھلے طور پر یہ اعتقاد رکھتے ہیں کہ ملک الموت کیا تمام ملائک اورسارے فرشتے زمین وآسمان کے جو آفتاب اور ماہتاب اوربادلوں اور ہواؤں اوردریاؤں وغیرہ پر مؤکل ہیں سب اس کے حکم کے تابع ہوجائیں گے اوربکمال اطاعت اُس کے آگےؔ سجدہ میں گریں گے۔ سوچنا چاہیئے کہ یہ کتنا بڑاشرک ہے کچھ انتہاء بھی ہے ؟ افسوس کہ اِن لوگوں کے دلوں پر کیسے پردے پڑگئے کہ انہوں نے استعارات کو حقیقت پر حمل کر کے ایک طوفان شرک کا برپا کردیا ہے اورباوجود قرائن قویہ کے ان استعارات کو قبول کرنا نہ چاہا جن کی حمایت میں قرآن کریم شمشیربرہنہ توحید کی لے کر کھڑاہے۔
    افسو س کہ اکثر لوگ خشک مُلّاؤں کی پیروی کرتے ہیں اور نہیں جانتے کہ ایسے مضامین کو ظاہر پر حمل کرنے سے کیا کیا خرابیاں پھیلیں گی وہ رسول کریم (مادر و پدرم فدائے اوباد ) جس نے ہمیں لَااِلٰہ اِلّا اللّٰہ سکھلا کر تما م غیراللہ کی طاقتیں ہمارے پَیروں کے نیچے رکھ دیں اور ایک زبردست معبود کا دامن پکڑا کر ہماری نظر میں ماسواکا قدر ایک مرے ہوئے کیڑے سے بھی کمتر کر دیا کیا وہ مقدّس نبی ہمارے ڈرانے کو آخری زمانہ کے لئے یہ ھوّا چھوڑ گیا۔پھر میں کہتا ہوں کہ وہ موحّدوں کا بادشاہ جس نے ہمارے رگ و ریشہ میں ہمیشہ کے لئے یہ دھنسادیا کہ الٰہی طاقتیں کسی مخلوق میں آہی نہیں سکتیں کیا و ہ اپنی متواتر تعلیموں کے برخلاف ہمیں ایسا سبق دینے لگا ۔ سو اے بھائیو یقینًا سمجھو کہ اس حدیث اور ایساہی اس کی امثالؔ کے ظاہری معنے ہرگزمراد نہیں ہیں۔ اور قرائن قویہ ایک شمشیر برہنہ لے کر اس کوچہ کی طرف جانے سے روک رہے ہیں۔بلکہ یہ تمام حدیث اُن مکاشفات کی قسم میں سے ہے جن کا لفظ تعبیر کے لائق ہوتا ہے جیسا کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 217
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 217
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/217/mode/1up
    میں ایک دوسری مسلم کی حدیث لکھ کر ابھی ثابت کرآیا ہوں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم خود اقرار اس بات کا فرماتے ہیں کہ یہ سب بیانات میرے مکاشفات میں سے ہیں اور اِس دمشقی حدیث میں بھی جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے کانّی کا لفظ موجود ہے وہ بھی بآواز بلند پکار رہا ہے کہ یہ سب باتیں عالم رؤیا اور کشف میں سے ہیں جن کی مناسب طور پر تاویل ہونی چاہیئے چنانچہ مُلّاعلی قاری نے بھی یہی لکھا ہے اور خدائے تعالیٰ کا قانونِ قدرت جو موافق آیت کریمہ
    خُلِقَ الْاِنْسَانُ ضَعِيْفًا ۱؂ انسان کی کمزوری پر شاہد ناطق ہے کسی آدم زادکے لئے ایسی قوت و طاقت تسلیم نہیں کرتا کہ وہ ہواکی طرح ایک دم میں مشارق و مغارب کا سَیر کرسکے اور آسمان کے سب اجرام اور زمین کے سب ذرّات اُس کے تابع ہوں۔تعجب کہ جب خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہؔ مضمون اِس حدیث کا از قبیل کشوف و رؤیا صالحہ ہے یعنی قابل تعبیر ہے تو پھر کیوں خواہ نخواہ اس کے ظاہر معنوں پر زور ڈالا جاتا ہے اور کیوں خوابوں کی طرح اس کی تعبیرنہیں کی جاتی؟ یا کشوف متشابہ کی طرح اس کی حقیقت حوالہ بخدا نہیں کی جاتی ؟زکریا کی کتاب کو دیکھو جو ملاکی سے پہلے ہے کہ کس قدر اس میں اِسی قسم کے مکاشفات لکھے ہیں مگر کوئی دانشمند اُن کو ظاہر پر حمل نہیں کرتا۔ ایساہی حضرت یعقوب کا خدائے تعالیٰ سے کشتی کرنا جو توریت میں لکھا ہے کوئی عقلمند اس کشف کو حقیقی معنی پرحمل نہیں کرسکتا۔
    سو اے بھائیو ! میں محض نصیحتًا للّٰہ پوری ہمدردی کے جوش سے جو مجھے آپ سے اور اپنے پیارے دین اسلام سے ہے آپ لوگوں کو سمجھاتا ہوں کہ آپ لوگ غلطی کررہے ہیں اور سخت غلطی کررہے ہیں کہ محض تحکم کی وجہ سے مکاشفات نبویہ کو صرف ظاہری الفاظ پرمحدود خیال کر بیٹھے ہیں یقینًا سمجھو کہ ان باتوں کو حقیقت پر حمل کرنا گویا اپنی ایمانی عمارت کی اینٹیں اُکھیڑنا ہے۔ مَیں متعجب ہوں کہ اگر آپ استعارات کو قبول نہیں کر سکتے توکیوں ان امور برتراز فہم کی تفسیر کو حوالہ بخدا نہیں کرؔ تے اس میں آپ کا
    ۱؂ النّساء:۲۹
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 218
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 218
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/218/mode/1up
    یا آ پ کے دینی جوش کا کیا حرج ہے ؟ کس نے آپ پر زورڈالا ہے یا کب اور کس وقت آپ کو رسول کریم کی طرف سے ایسی تاکید کی گئی ہے کہ ضرور ایسے الفاظ کو حقیقت پر ہی حمل کرو؟
    آپ صاحبوں کا یہ عذرکہ اس پراجماع سلف صالح ہے یہ ایک عجیب عذر ہے جس کے پیش کرنے کے وقت آپ صاحبوں نے نہیں سوچاکہ اگر فرض کے طور پر اجماع بھی ہو جو کسی طرح ثابت نہیں ہو سکتا پھر بھی ظاہری الفاظ پراجماع ہو گا نہ یہ کہ فرد فرد نے حلف اُٹھا کر اِس بات کا اقرار کیا ہے کہ اس حدیث کے الفاظ سے جو ظاہری معنے نکلتے ہیں درحقیقت وہی مراد ہیں۔اُن بزرگوں نے تو ان احادیث کو امانت کے طور پر پہنچا دیا اوران کی اصل حقیقت کو حوالہ بخداکرتے رہے۔اجماع کی تہمت اُن بزرگوں پر کس قدر بے اصل تہمت ہے جس کا کوئی ثبوت نہیں دے سکتا۔ میں کہتا ہوں کہ اجماع تو ایک طرف اس قسم کی حدیثیں بھی عام طور پر صحابہ میں نہیں پھیلیں تھیں۔صاف ظاہر ہے کہ اگر صحابہ کرام کا اس بات پر اتفاق ہوتا کہ دجّال معہود آخری زمانہ میں نکلے گا اور حضرت مسیح اس کو قتل کریں گے تو پھر حضرت جا بربن عبداللہ اور حضرت عمرؔ رضی اللہ عنہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے رُوبرو کیوں قسم کھا کر کہتے کہ دجّال معہود جو آنے والا تھا وہ یہی ابن صیّاد ہے جو آخر مشرف باسلام ہو کر مدینہ منورہ میں فوت ہوگیا ؟ بھائیو! یہ حدیث صحیح بخاری اور صحیح مسلم دونوں میں لکھی ہے اور ابوداؤد اور بیہقی میں بھی نافع کی روایت سے یہ حدیث موجود ہے کہ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ قسم کھا کر کہا کرتے تھے کہ مجھے خدائے تعالیٰ کی قسم ہے کہ مجھے اس میں کچھ بھی شک نہیں کہ مسیح دجّال یہی ابن صیّاد ہے۔ بھلا اس مؤخر الذکر حدیث کو جانے دو کیونکہ یہ ایک صحابی ہیں ممکن ہے کہ انہوں نے غلطی کی ہو۔لیکن اُس حدیث کی نسبت کیا عذر پیش کرو گے جس کو ابھی میں ذکر کر چکا ہوں جو حضرت عمررضی اللہ عنہ نے خود جناب رسالت مآب رسو ل اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 219
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 219
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/219/mode/1up
    حضور میں قسم کھا کر کہا تھا کہ دجّال معہود یہی ابن صیّاد ہے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے چُپ رہنے اورانکار نہ کرنے کی وجہ سے اُس قسم پر مہر لگا دی اور حضرت عمر کے خیال سے اپنا اتفاق رائے کردیا۔
    حضرت عمررضی اللہ عنہ کا درجہ جانتے ہو کہ صحابہ میں کس قدر بڑاہے یہاؔ ں تک کہ بعض اوقات ان کی رائے کے موافق قرآن شریف نازل ہو جایا کر تا تھا اور اُن کے حق میں یہ حدیث ہے کہ شیطان عمر کے سایہ سے بھاگتا ہے دوسری یہ حدیث ہے کہ اگر میرے بعد کوئی نبی ہوتا تو عمر ہوتا۔ تیسری یہ حدیث ہے کہ پہلی اُمتوں میں محدّث ہو تے رہے ہیں اگر اس اُمّت میں کوئی محدّث ہے تو وہ عمرہے۔ اب سوچو اور خیال کرو کہ نَواس بن سَمعَان کو پایہ عالیہ عمر سے کیا مناسبت ہے؟جو فہم قرآن اور حدیث کا حضرت عمر کو دیاگیا تھا اُس سے نواس کو کیانسبت ہے؟ما سوااس کے یہ حدیث متفق علیہ ہے جو بخاری اور مسلم دونوں نے لکھی ہے اور نواس کی دمشقی حدیث جس میں دجّال کی تعریفیں خلاف عقل و خلاف تو حید درج ہیں صرف مسلم میں لکھی گئی ہے ماسوائے اس کے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا قسم کھانا اور پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کاکچھ انکار نہ کرنا اس بات کا فیصلہ دیتا ہے کہ ضرور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی نظر میں اور نیز صحابہ کرام کی نگاہ میں دجّال معہود ابن صیّاد ہی تھا اور حدیث شرح السنہ سے بھی یہی ثابت ہو تا ہے کہ ہمیشہ اور مدّ ت العمر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اپنی اُمّت پر اسی بات سے ہراساں تھے کہ اؔ بن صَیَّاد دَجَّال معہود ہے اب جبکہ ابن صَیَّاد کا دجّال معہود ہو نا ایسے قطعی اور یقینی طور سے ثابت ہو گیا کہ اِس میں کسی طور کے شک و شبہ کو راہ نہیں تو اس جگہ بالطبع یہ سوال پیدا ہو تا ہے کہ جبکہ دجّال خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں پیدا ہو کر اور مشرف باسلام ہو کر اور آخر مدینہ میں فوت بھی ہو گیا تو حضرت مسیح کے ہاتھ سے جن کے آنے کی علّت غائی دَجَّال کا مار نا ظاہر کیا جا تا ہے کون قتل کیا جا ئے گا کیونکہ دجّال تو موجود ہی نہیں جن کو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 220
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 220
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/220/mode/1up
    وہ قتل کریں اور یہی ایک خدمت تھی جو اُن کے سپرد کی گئی تھی۔اس سوال کا جواب ہم بجُز اِس صورت کے اور کسی طور سے دے نہیں سکتے کہ آخری زمانہ میں دجّال معہود کا آنا سراسر غلط ہے۔ اب حاصل کلام یہ ہے کہ وہ دمشقی حدیث جو امام مسلم نے پیش کی ہے خود مسلم کی دوسری حدیث سے ساقط الاعتبار ٹھہرتی ہے اور صریح ثابت ہوتا ہے کہ نواس راوی نے اس حدیث کے بیان کرنے میں دھوکہ کھایا ہے یہ فرض صاحب مسلم کے سر پر تھا کہ وہ اپنی ذکر کر دہ حدیث کا تعارض اپنی قلم سے رفع کرتے مگر انہوں نے جو ایسے تعارض کا ذکر تک نہیں کیا تو اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہؔ وُہ محمد بن المنکدر کی حدیث کو نہایت قطعی اور یقینی اور صاف اور صریح سمجھتے تھے اور نواس بن سمعان کی حدیث کو از قبیل استعا رات و کنا یا ت خیال کر تے تھے اور اُس کی حقیقت حوالہ بخدا کر تے تھے۔
    غرض اے بھائیو!اِن حدیثوں پر نظرڈال کر ہریک آدمی سمجھ سکتا ہے کہ کبھی صدر اوّل کے لوگوں نے دجّال معہود کے بارہ میں ہرگز اس بات پر اتفاق نہیں کیا کہ وہ آخری زمانہ میں آئے گا اور مسیح ابن مریم ظہور فرما کر اُس کو قتل کرے گا بلکہ وہ تو ابن صیّاد کو ہی دجّال معہود سمجھتے رہے اور یہ بات خود ظاہر ہے کہ جب انہوں نے ابن صیّاد کو دجّال معہود یقین کیا اور پھر یہ بھی اپنی زندگی میں دیکھ لیا کہ وہ مشرف باسلام ہو گیا اور پھر یہ بھی دیکھ لیا کہ وہ مدینہ منورہ میں فوت بھی ہوگیا اور مسلمانوں نے اس کے جنازہ کی نماز پڑھی پھر ایسی صورت میں اُ ن بزرگوں کا اس بات پر کیوں کر ایمان یا اعتقاد ہو سکتا تھا کہ مسیح ابن مریم آخری زمانہ میں دجّال معہود کے قتل کرنے کے لئے آسمان سے اُتر یں گے کیونکہ وہ بزرگوار لوگ تو پہلے ہی دجّال معہود کا فوت ہو جا نا تسلیم کر چکے تھے پھر اس اعتقاد کے ساتھ یہ دوسرا اعتقاد کیوں کر جوڑؔ کھا سکتا ہے کہ اُن کو مسیح ابن مریم کے آسمان سے اُترنے اور دجّال معہود کے قتل کرنے کی انتظار لگی ہوئی تھی یہ تو صریح اجتماع ضدَّین ہے اور کوئی دانشمند اور قائم الحواس آدمی ایسے دو متضاد اعتقاد ہر گز نہیں رکھ سکتا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 221
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 221
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/221/mode/1up
    اب سوچنا چاہیئے کہ یہ بیان کہ صحابہ کرام کا دجّال معہود اور مسیح ابن مریم کے آخری زمانہ میں ظہور فرمانے کا ایک اجماعی اعتقاد تھا کس قدر اُن بزگوں پر تہمت ہے۔
    پھر یہ بھی سوچنا چاہیئے کہ اگر یہ بات سچ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تھا کہ ہریک نبی اپنی قو م کو دجّال کے نکلنے سے ڈراتاآیا ہے اور میں بھی تم سب کو ڈراتا ہوں کہ دجّال آخری زمانہ میں نکلے گا تو چاہیئے تھا کہ اس نصیحت اور تبلیغ کو تمام صحابہ اپنے نفس پر ایک واجب التبلیغ سمجھ کر تا بعین تک پہنچاتے اور آج ہزارہا صحا بہ کی روایتوں سے یہ حدیث بخاری اور مسلم میں موجود ہوتی حالا نکہ بجُز نواس بن سَمعان اور ایک دو اور آدمیوں کے کسی نے اس حدیث کی روایت نہیں کی بلکہ نواس بن سمعان اپنی تمام روایت میں منفرد ہے۔ اب سو چو کہ ایک طرف تو یہ بتلایا جا تا ہے کہ اس حدیث کےؔ بارہ میں عام طور پر تمام صحابہ کو تاکید ہوئی تھی کہ تم نے اس مضمون کو تابعین تک پہنچادینا اور دوسری طرف جب ہم دیکھتے ہیں تو بجُز ایک دو آدمیوں کے کوئی پہنچانے والا نظر نہیں آتا۔ اِس صورت میں جس قدر ضعف اِس حدیث میں پایا جا تا ہے وہ محققین کی نظر سے پو شیدہ نہیں رہ سکتا۔ پھر تواتر کا دعویٰ کر نا اگر پر لے درجہ کا تعصّب نہیں تو اور کیا ہے؟
    اب اے لوگو!خدائے تعالیٰ سے ڈرو اور صحابہ اور تابعین پر تہمت مت لگاؤ کہ اُن سب کو اس مسئلہ پر اجماع تھا کہ مسیح ابن مریم آسمان سے اُتریں گے اور دَجَّال یک چشم خدائی کے کرشمے دکھا نے والے کو قتل کریں گے۔اُن بزرگوں کو تو اس اعتقاد کی خبر بھی نہیں تھی اگر انہیں خبر ہوتی اور جیسا کہ بعض حدیثوں میں لکھا ہے پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں وصیت فرما ئی ہو تی تو کیا ممکن تھا کہ صحابہ رضی اللہ عنھم اس واجب التبلیغ امر کو تابعین تک نہ پہنچاتے اور پھر تابعین تبع تابعین کو اس کی خبر نہ کر تے۔ صاف ظاہر ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی وصیت پر عمل نہ کر نا سخت معصیت میں داخل ہے پھر کیوں کر ممکن تھا کہ ایسا معصیت کاؔ کام اکابر صحابہ رضی اللہ عنھم سے سرزد ہو تا پس صاف ظاہر ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 222
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 222
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/222/mode/1up
    کہ اس تبلیغ کے بارہ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے کو ئی تا کید نہیں ہوئی اور نہ صحابہ کبار رضی اللہ عنہم اس کو تابعین تک پہنچانے کے لئے اپنے مجموعی جوش سے متوجہ ہوئے اور یہاں تک مضمون اس حدیث کا نادر اور قلیل الشہرت رہا کہ امام بخاری جیسے رئیس المحدثین کو یہ حدیث نہیں ملی کہ مسیح ابن مریم دمشق کے شرقی کنارہ میں منارہ کے پاس اُترے گا اور جتنے خدائے تعالیٰ سے کام دنیا میں ہورہے ہیں وہ سب دجّال دکھاوے گا۔ اب خیال کرنا چاہیئے کہ اس حدیث کے مضمون پراجماع کا دعویٰ کرنا اور یہ کہنا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے آج تک اسی پر اتفاق اکابراسلام رہا ہے کس قدرافترا ہے بلکہ یہ حدیث تو اُن متواتر حدیثوں سے ہی کالعدم ہوجاتی ہے جن میں بروایت ثقات صحابہ دَجَّال کی نسبت یہ فیصلہ کردیا گیا ہے کہ وہ درحقیقت ابن صَیَّاد ہی تھا جو یزید پلید کے عہد سلطنت میں مدینہ منوّرہ میں فوت ہو گیا اور اُس کے جنازہ کی نماز پڑھی گئی۔
    یہ ایک عجیب بات ہے کہ قرآن شریف توؔ بآواز بلند مسیح ابن مریم کا فوت ہوجا نا بیان کر رہا ہے اور احادیث صحیحہ مسلم و بخاری باتفاق ظاہر کر رہی ہیں کہ دراصل ابن صیّاد ہی دجّال معہود تھا اور حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ جیسے بزرگ صحابی روبرو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے خدائے تعالیٰ کی قسم کھا رہے ہیں کہ درحقیقت دجّال معہود ابن صیّاد ہیؔ ہے اور خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم بھی اس کی تصدیق کررہے ہیں کہ درحقیقت ابن صیّاد ہی دجا ل معہود ہے جو انجام کار
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 223
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 223
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/223/mode/1up
    مسلمان ہو گیا اور اسلام کی حالت میں ہی مدینہ میں مرااور مسلمانوں کے قبرستان میں دفن کیا گیا مگر پھر بھی ہمارے مسلمان بھائی اپنی ضد سے باز نہیں آتے۔ بھائیو!!! اس بحث کی دو ٹانگیں تھیں (۱)ؔ ایک تو مسیح بن مریم کا آخری زمانہ میں جسم خاکی کے ساتھ آسمان سے اُترنا۔ سو اُس ٹانگ کو تو قرآن شریف اور نیز بعض احادیث نے بھی مسیح ابن مریم کے فوت ہوجانے کی خبر دے کر توڑ دیا۔(۲) دوسری ٹانگ دَجَّال معہود کا آخری زمانہ میں ظاہر ہونا تھا سو اس ٹانگ کو صحیح مسلم اور صحیح بخاری کی متفق علیہ حدیثوؔ ں نے جو صحابہ کبار کی روایت سے ہیں دو ٹکڑے کردیا اور ابن صیّاد کو دجّال معہود ٹھہرا کر آخر مسلمانوں کی جماعت میں داخل کر کے مار بھی دیا۔اب جبکہ اس بحث کی دونوں ٹانگیں ٹوٹ گئیں توپھر اب تیرہ سو برس کے بعد یہ مُردہ جس کے دونوں پَیر نہیں کیوں اور کس کے سہارے سے کھڑاہو سکتا ہےؔ اتقوااللّٰہ ! اتقوااللّٰہ ! ! اتقوااللّٰہ !!!
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 224
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 224
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/224/mode/1up
    اور مسیح ابن مریم کے فوت ہوجانے کے بارہ میں ہمارے پاس اس قدر یقینی اور قطعی ثبوت ہیں کہ اُن کے مفصل لکھنے کے لئے اس مختصر رسالہ میں گنجائش نہیں پہلے قرآن شریف پر نظر غور ڈالو اور ذرا آنکھ کھول کر دیکھو کہ کیوں کر وہ صاف اور بیّن طور پر عیسیٰ بن مریم کے مر جانے کی خبر دے رہا ہے جس کی ہم کوئی بھی تاویل نہیں کرسکتے مثلًا یہ جو خدائے تعالیٰ قرآن کریم میں حضرت عیسیٰ کی طرف سے فرماتا ہے
    فَلَمَّا تَوَفَّيْتَنِىْ كُنْتَ اَنْتَ الرَّقِيْبَ عَلَيْهِمْ ۱؂
    کیا ہم اس جگہ تَوَ فّی سے نیند مراد لے سکتے ہیں ؟ کیا یہ معنے اس جگہ موزوں ہوں گے کہ جب تُو نے مجھے سُلا دیا اور میرے پر نیند غالب کردی تو میرے سونے کے بعد تُو اُن کا نگہبان تھا ہرگز نہیں بلکہ توفّٰی کے سیدھے اورصاف معنے جو موت ہے وہی اس جگہ چسپاں ہیں۔ * لیکن موت سے مراد وہ موت نہیں جو آسمان سے اُترنے کے بعد پھر وارد ہوکیونکہ جو سوال اُن سے کیاگیا ہے یعنی اُن کی اُمّت کا بگڑ جانا اُس وقت کی موت سے اس سوال کا کچھ علاقہ نہیں۔کیا نصارٰی اب صراط مستقیم پر ہیں ؟ کیا یہ سچ نہیںؔ کہ جس امر کے بارے میں خدائے تعالیٰ نے عیسیٰ بن مریم سے سوال کیا ہے وہ امر تو خودآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ تک ہی کمال کو پہنچ چکا ہے۔
    ماسوا اس کے حدیث کی رُو سے بھی حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا فوت ہو جانا ثابت ہے چنانچہ تفسیر معالم کے صفحہ۱۶۲ میں زیر تفسیر آیت
    يٰعِيْسٰى اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَىَّ۲؂
    لکھاہے کہ علی بن طلحہ ابن عباس سے روایت کرتے
    ہیں کہ اس آیت کے یہ معنی ہیں کہ اِنِّیْ مُمِیْتُکَ یعنی میں تجھ کو مارنے والا ہوں اس پر دوسرے اقوال اللہ تعالیٰ کے دلالت کرنے ہیں
    قُلْ يَتَوَفّٰٮكُمْ مَّلَكُ الْمَوْتِ ۳؂ ۔
    الَّذِيْنَ تَتَوَفّٰٮهُمُ الْمَلٰۤٮِٕكَةُ طَيِّبِيْنَ۴؂ ۔
    الَّذِيْنَ تَتَوَفّٰٮهُمُ الْمَلٰۤٮِٕكَةُ ظَالِمِىْۤ اَنْفُسِهِمْ ۵؂ ‌ۙ
    غرض حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ کا اعتقاد یہی تھا
    *حاشیہ۔ قرآن شریف میں اول سے آخر تک جس جس جگہ توفّی کا لفظ آیا ہے اُن تمام مقامات میں توفّی کے معنے موت ہی لئے گئے ہیں۔ منہ
    ۱؂ المائدۃ : ۱۱۸ ۲ ؂ اٰل عمران : ۵۶ ۳؂ السجدۃ : ۱۲ ۴؂ النّحل :۳۳ ۵؂ النّحل : ۲۹
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 225
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 225
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/225/mode/1up
    کہ حضرت عیسیٰ فوت ہوچکے ہیں اور ناظرین پر واضح ہو گا کہ حضرت ابن عباس قرآن کریم کے سمجھنے میں اوّل نمبر والوں میں سے ہیں اور اِس بارے میں اُن کے حق میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک دعا بھی ہے۔
    پھر اسی معالم میں لکھا ہے کہ وہب سے یہ روایت ہے کہ حضرت عیسیٰؔ تین گھنٹہ کے لئے مرگئے تھے اور محمد بن اسحاق سے روایت ہے کہ نصارٰی کا یہ گمان ہے کہ سات گھنٹہ تک مرے رہے مگر مؤلف رسالہ ہذا کو تعجب ہے کہ محمد بن اسحاق نے سات گھنٹہ تک مرنے کی نصاریٰ کی کن کتابوں سے روایت لی ہے کیونکہ تمام فرقے نصاریٰ کے اِسی قول پر متفق نظرآتے ہیں کہ تین دن تک حضرت عیسیٰ مرے رہے اور پھر قبر میں سے آسمان کی طرف اُٹھائے گئے اور چاروں انجیلوں سے بھی یہی ثابت ہوتا ہے اور خود حضرت عیسیٰ انجیلوں میں اپنی تین دن کی موت کا اقرار بھی کرتے ہیں بہرحال موت اُن کی ثابت ہے اور ماسوا اِن دلائل متذکرہ کے یہود و نصاریٰ کا بالاتفاق اُن کی موت پر اجماع ہے اورتاریخی ثبوت بتواتر اُن کے مرنے پر شاہد ہے اورپہلی کتابوں میں بھی بطور پیشگوئی اُن کے مرنے کی خبر دی گئی تھی۔
    اب یہ گمان کہ مرنے کے بعد پھر اُن کی روح اُسی جسم خاکی میں داخل ہو گئی اور وہ جسم زندہ ہو کر آسمان کی طرف اٹھایاگیا۔یہ سراسر غلط گمان ہے یہ بات باتفاق جمیع کتبِ الٰہیہ ثابت ہے کہ انبیاء و اولیاء مرنے کے بعدؔ پھر زندہ ہوجایا کرتے ہیں یعنی ایک قسم کی زندگی انہیں عطا کی جاتی ہے جو دوسروں کو نہیں عطاکی جاتی۔اِسی طرف و ہ حدیث اشارہ کرتی ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ مجھے قبر میں میّت رہنے نہیں دے گا۔* اور زندہ کرؔ کے اپنی طرف اُٹھالے گا اور زبور نمبر ۱۶ میں بھی حضرت
    * حاشیہ: اصل ترجمہ حدیث کا یہ ہے کہ میری عزت خدائے تعالیٰ کی جناب میں اس سے زیادہ ہے کہ مجھے چالیس دن تک قبر میں رکھے یعنی میں اس مدت کے اندر اندر زندہ ہو کر آسمان کی طرف اُٹھایا جاؤں گا۔ اب دیکھنا چاہیئے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 226
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 226
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/226/mode/1up
    داؤد علیہ السلام بوحئ الٰہی یہ فرماتے ہیں کہ تُو میری جان کو قبر میں رہنے نہیں دے گا اور تو اپنے قدوس کو سڑنے نہیں دے گا یعنی بلکہ تُو مجھے زندہ کرے گا اور اپنی طرف اُٹھا لے گا اِسی طرح شہداء کے حق میں بھی قرآن کریم فرماتا ہے
    وَلَا تَحْسَبَنَّ الَّذِيْنَ قُتِلُوْا فِىْ سَبِيْلِ اللّٰهِ اَمْوَاتًا‌ؕ بَلْ اَحْيَآءٌ عِنْدَ رَبِّهِمْ يُرْزَقُوْنَۙ ۱ یعنی جو لوگ خدائے تعالیٰ کے راہ میں قتل کئے گئے تم اُن کو مُردے نہ سمجھو بلکہ وہ تو زندہ ہیں اورانہیں اپنے رب کی طرف سے رزق مل رہا ہے۔
    بقیہ حاشیہ:
    کہ ہمارے سیّد ومولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کے قبر میں زندہ ہوجانے اور پھر آسمان کی طرف اٹھائے جانیکی نسبت مسیح کے اُٹھائے جانے میں کونسی زیادتی ہے بلکہ سچ تو یہ ہے کہ عیسیٰ بن مریم کی حیات حضرت موسیٰ کی حیات سے بھی درجہ میں کمتر ہے اور اعتقاد صحیح جس پر اتفاق سلف صالح کا ہے اور نیز معراج کی حدیث بھی اس کی شاہد ناطق ہے یہی ہے کہ انبیاء بحیات جسمی مشابہ بحیات جسمی دنیاوی زندہ ہیں اور شہداء کی نسبت اُن کی زندگی اکمل واقویٰ ہے اور سب سے زیادہ اکمل واقویٰ واشرف زندگیؔ ہمارے سیّد ومولیٰ فدا ء لہ نفسی وابی واُمّی صلی اللہ علیہ وسلم کی ہے۔ حضرت مسیح تو صرف دوسرے آسمان میں اپنے خالہ زاد بھائی اورنیز اپنے مرشد حضرت یحییٰ کے ساتھ مقیم ہیں لیکن ہمارے سیّد ومولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم سب سے اعلیٰ مرتبہ آسمان میں جس سے بڑھکر اور کوئی مرتبہ نہیں تشریف فرما ہیں عند سدرۃ المنتھٰی بالرفیق الاعلٰی اوراُمّت کے سلام وصلوات برابر آنحضرت ؐ کے حضور میں پہنچائے جاتے ہیں اللّٰھم صل علٰی سیدنا محمد وعلٰی اٰل سیدنا محمد اکثر مما صلیت علیٰ احد من انبیائک وبارک وسلم اور یہ خیال کہ انبیاء زندہ ہو کر قبر میں رہتے ہیں صحیح نہیں ہے ہاں قبر سے ایک قسم کا اُن کا تعلق باقی رہتا ہے اور اسی وجہ سے وہ کشفی طورپر اپنی اپنی قبروں میں نظر آتے ہیں مگریہ نہیں کہ وہ قبروں میںؔ ہوتے ہیں بلکہ وہ تو ملائک کی طرح آسمانوں میں جو بہشت کی زمین ہے اپنے اپنے مرتبہ کے موافق مقام رکھتے ہیں اور بیداری میں پاک دل لوگوں سے کبھی کبھی زمین پر آکر ملاقات بھی کر لیتے ہیں ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا اکثر اولیاء سے عین بیداری کی حالت میں ملاقات کرنا کتابوں میں بھرا پڑا ہے اور مؤلف رسالہ ہذا بھی کئی دفعہ اس شرف سے مشرف ہو چکا ہے والحمد للّٰہ علیٰ ذالک۔ اور
    ۱ اٰل عمران:۱۷۰
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 227
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 227
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/227/mode/1up
    ایک اور حدیث بھی مسیح ابن مریم کے فوت ہوجانے پردلالت کرتی ہے اور وہ یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کہ قیامت کب آئے گی توآپ نے فرمایا کہ آج کی تاریخ سے سو برس تک تمام بنی آدم پر قیامت آجائے گی اور یہ اس بات کی طرف اشارہ تھا کہ سو برس کے عرصہ سے کوئی شخص زیادہ زندہ نہیں رہ سکتا اِسی بناء پراکثر علماء و فقرا اسی طرف گئے ہیں کہ خضر بھی فوت ہو گیا کیونکہ مخبر صادق کے کلام میں کذب جائز نہیں مگر افسوس کہ ہمارے علماء نے اس قیامت سے بھی مسیح کو باہر رکھ لیا تعجب کہ اَور بنی اسرائیل کے انبیاء کی نسبت مسیح کو کیوں زیادہ عظمت دی جا تی ہے۔بظاہر ایسامعلوم ہوتا ہے کہ چونکہ ہمارے بھائی مسلمان کسی ایسے زمانہ سے کہ جب سے بہت سے عیسائی دین اسلامؔ میں داخل ہوئے ہوں گے اور کچھ کچھ حضرت مسیح کی نسبت اپنے مشرکانہ خیالات ساتھ لائے ہوں گے اس بے جا عظمت دینے کے عادی ہوگئے ہیں جس کو قرآن شریف تسلیم نہیں کرتا اس لئے خاص طور پر مسیح کی تعریف کے بارے میں اُن میں حد موزوں سے زیادہ غلو پایا جاتا ہے انصاف کی نظر سے دیکھنا چاہیئے کہ کتاب براہین احمدیہ میں خدا تعالیٰ نے اس عاجز کو آدم صفی اللہ کا مثیل قرار دیا اور کسی کو علماء میں سے اس بات پر ذرہ رنج دل میں نہیں گذرا اور پھر مثیل نوح قراردیا اور کوئی رنجیدہ نہیں ہوا اور پھر مثیل یوسف علیہ السلام قرار دیا اور کسی مولوی صاحب کو اس سے غصّہ نہیں آیا اور پھر مثیل حضرت داؤد بیان فرمایا اور کوئی علماء میں سے رنجیدہ خاطر نہیں ہوا۔ اور پھرمثیل موسیٰ کر کے بھی اس عاجز کو پکار ا تو کوئی فقیہوں اورمحدّثوں میں سے مشتعل نہیں ہوا یہاں تک کہ پھر اللہ تعالیٰ نے اس عاجز کو مثیل ابراہیم بھی کہا تو کسی شخص نے ایک
    بقیہ حاشیہ: حدیث نبوی کا یہ فقرہ کہ میں چالیس دن تک قبر میں نہیں رہ سکتا یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ اوّل چند روز گوکیسا ہی مقدس آدمی ہو قبر سے اور اس عالم خاکی سے ایک بڑھا ہوا تعلق رکھتا ہے۔ کوئی دینی خدمات کی زیادہ پیاس کی وجہ سے اورکوئی اَور اَور وجوہ سے اورپھر وہ تعلقؔ ایسا کم ہوجاتا ہے کہ گویا وہ صاحب قبر۔ قبر میں سے نکل جاتا ہے ورنہ رُوح تو مرنے کے بعد اُسی وقت بلا توقف آسمان پر اپنے نفسی نقطہ پر جاٹھہرتی ہے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 228
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 228
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/228/mode/1up
    ذرہ بھی غیظ و غضب ظاہر نہیں کیا اور پھر آخر مثیل ٹھہرانے کی یہا ں تک نوبت پہنچی کہ بار بار یا احمد کے خطاب سے مخاطب کر کے ظلّی طورپر مثیل سیّد الانبیاء واماؔ م الاصفیاء حضرت مقدس محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم قرار دیا تو کوئی ہمارے مفسروں اور محدثوں میں سے جوش و خروش میں نہیں آیا اور جب خدائے تعالیٰ نے اس عاجز کو عیسیٰ یا مثیل عیسیٰ کر کے پکارا تو سب کے شدّت طیش اور غضب کی وجہ سے چہرے سُرخ ہو گئے اور سخت درجہ کا اشتعال پیداہو کر کسی نے اس عاجز کو کافر ٹھہرادیا اور کسی نے اس عاجز کا نام مُلحد رکھا جیساکہ مولوی عبدالرحمٰن صاحب خلف مولوی محمد لکھو کے والہ نے اس عاجز کا نام مُلحد رکھا اور جابجا یہ بھی ذکر کیا کہ یہ شخص بہت خراب آدمی ہے۔ چنانچہ ایک شخص عبدالقادر نام شرقپور ضلع لاہور کے رہنے والے کے پاس بھی یہی ذکر کیا کہ یہ شخص مُلحد اور بدمذہب اور خراب اور ملاقات کے لائق نہیں۔علاوہ اس کے ان لوگوں نے اشتعال کی حالت میں اسی پر بس نہیں کی بلکہ یہ بھی چاہا کہ خدائے تعالیٰ کی طرف سے بھی اس بارہ میں کوئی شہادت ملے تو بہت خوب ہو۔ چنانچہ انہوں نے غصّہ بھرے دل کے ساتھ استخارے کئے اورچونکہ قدیم سےؔ قانون قدرت خدائے تعالیٰ کا یہی ہے کہ جو شخص نفسانی تمنّا سے کسی امر غیب کا منکشف ہونا چاہتا ہے تو شیطان اُس کی تمنا میں ضرور دخل دیتا ہے بجزانبیاء اور محدثین کے کہ ان کی وحی شیطان کے دخل سے منزّہ کی جاتی ہے پس اسی وجہ سے حضرت عبدالرحمٰن صاحب اور اُن کے رفیق نیّت میاں عبدالحق غزنوی کے استخارہ پر وہ بئس القرین تُرت حاضر ہو گیا اور اُن کی زبان پرجاری کرا دیاکہ وہ شخص یعنی یہ عاجز جہنّمی ہے اور مُلحد ہے اور ایسا کافر ہے کہ ہرگز ہدایت پذیر نہیں ہو گا۔میں پوچھتاہوں کہ کیا علماء کے لئے عند الشرع یہ جائز ہے کہ کسی ایسے مسئلہ میں جوخیر القرون کے لوگ ہی اُس پر اتفاق نہ رکھتے ہوں اور صحابہ رضی اللہ عنہم کا اس پر اجماع ثابت نہ ہو ایک ایسے ملہم کی نسبت جو بعض احادیث اور قرآن کریم امکانی طور پر اُس کے صدق پر شاہد ہوں تکفیر کا فتویٰ لگا ویں یہ بات سمجھنے والے سمجھ سکتے ہیں کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 229
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 229
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/229/mode/1up
    مثیل موعود ہونے کے بارہ میں اس عاجز کا الہام حدیث اورقرآن کے ہرگز مخالف نہیں اور کتب حدیث کو مہمل اور بے کار نہیں کرتا بلکہ اُن کا مصدق اور اُن کی سچائی کو ظاہر کرنے والا ہے کیا یہ سچ نہیں کہ فرقان کریم مسیح ابنؔ مریم کافوت ہوجانا بیان کررہا ہے اوردجّال معہود کا مرجانا خود صحیح مسلم کی بعض حدیثیں ثابت کررہی ہیں پھر قرآن اور بعض حدیث میں تطبیق کرنے کے لئے بجز اس کے اور کیا راہ ہے کہ ابن مریم کے اُترنے سے اس کے کسی مثیل یا کئی مثیلوں کا اُترنا مراد لیا جاوے۔پھر جبکہ الہام بھی اسی راہ کی طرف رہنمائی کرے تو کیا وہ حدیث اور قرآن کے موافق ہوا یا مخالف ؟
    اب رہا یہ امر کہ کسی نبی کا اپنے تئیں مثیل ٹھہرانا عندالشرع جا ئز ہے یا نہیں۔پس واضح ہو کہ درحقیقت اگر غور کر کے دیکھو تو جس قدر انبیاء دنیا میں بھیجے گئے ہیں وہ اسی غرض سے بھیجے گئے ہیں کہ تا لوگ اُن کے مثیل بننے کے لئے کوشش کریں اگر ہم ان کی پیروی کرنے سے اُن کے مثیل نہیں بن سکتے بلکہ ایسے خیال سے انسان کافر و مُلحد ہو جا تا ہے تو اس صورت میں انبیاء کاآنا عبث اورہمار ا اُن پر ایمان لانا بھی عبث ہے۔قرآن شریف صاف یہی ہدایت فرماتا ہے ا ورہمیں سورۂ فاتحہ اُمُّ الکتاب میں مثیل بن جانے کی امید دیتا ہے اورہمیں تاکید فرماتا ہے کہ پنج وقت تم میرے حضور میں کھڑے ہوکر اپنی نماز میں مجھ سے یہ دعامانگو کہ اِهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِيْمَۙ۔
    صِرَاطَ الَّذِيْنَ اَنْعَمْتَ عَلَيْهِمْ ۱؂ یعنی اے میرے خداوند رحمن و رحیم ہمیں ایسی ہدایت بخش کہ ہم آدم صفی اللہ کے مثیل ہو جائیں شیث نبی اللہ کے مثیل بن جائیں حضرت نوح آدم ثانی کے مثیل ہوجائیں۔ ابراہیم خلیل اللہ کے مثیل ہوجائیں موسیٰ کلیم اللہ کے مثیل ہو جا ئیں۔ عیسیٰ روح اللہ کے مثیل ہو جا ئیں اور جناب احمد مجتبیٰ محمد مصطفی حبیب اللہ کے مثیل ہو جا ئیں اور دنیا کے ہرایک صدیق و شہید کے مثیل ہو جائیں۔ اب ہمارے علماء جو مثیل ہو نے کے دعویٰ کو کفر و الحاد خیال کر تے ہیں اور جس شخص کو الہام الٰہی کے ذریعہ سے اس ممکن الحصول مرتبہ کی بشارت دی جا وے اس کو مُلحد اور کا فر اور جہنمی ٹھہراتے ہیں۔
    ۱؂ الفاتحہ: ۶،۷
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 230
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 230
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/230/mode/1up
    ذرا سوچ کر بتلاویں کہ اگر اس آیت کریمہ کے یہ معنے نہیں ہیں کہ جو میَں نے بیان کئے ہیں تو اور کیا معنے ہیں اور اگر یہ معنے صحیح نہیں ہیں تو پھر اللہ جلّشَانُہٗ کیوں فر ما تا ہے
    قُلْ اِنْ كُنْتُمْ تُحِبُّوْنَ اللّٰهَ فَاتَّبِعُوْنِىْ يُحْبِبْكُمُ اللّٰهُ ۱؂ یعنی ان کو کہہ دو کہ اگر تم خدائے تعالیٰ سے محبت رکھتے ہو تو آؤ میری پَیروی کرو تا خدائے تعالیٰ بھی تم سے محبت رکھے اور تمہیں اپنا محبوب بنالیوے۔اب سو چنا چاہئے کہ جس وقت انسان ایک محبوب کی پَیروی سے خود بھی محبوب بن گیا تو کیا اس محبوب کا مثیل ہی ہو گیا یا ابھی غیر مثیل رہا۔ افسوس! ہمارے پُر کینہ مخالف ذرا نہیں سو چتے کہ طالبِ مولیٰ کے لئے یہی تو عمدہ اور اعلیٰ خواہش ہے جو اس کو مجاہدات کی طرف رغبت دیتی ہے اور یہی تو ایک زور آور انجن ہے جو تقویٰ اور طہارت اور اخلاص اور صدق اور صفا اور استقامت کے مراتب عا لیہ کی طرف کھینچتا چلا جاتا ہے اور یہی تو وہ پیاس لگانے والی آگ ہے جس سے ظاہر و باطن سالک کا بھڑک اُٹھتا ہے اگر اس مقصد کے حصول سے یا س کلّی ہو تو پھر اس محبوب حقیقی کے سچے طالب جیتے ہی مر جائیں۔آج تک جس قدر اکا بر متصوّفین گذرے ہیں اُن میں سے ایک کو بھی اس میں اختلاف نہیں کہ اس دین متین میں مثیل الا نبیاء بننے کی راہ کھلی ہوئی ہے جیسا کہ آنحضرت صلعم روحا ؔ نی اور ربّانی علماء کے لئے یہ خوشخبری فرما گئے ہیں کہعلماء اُمّتی کانبیاء بنی اسرا ئیل اور حضرت بایزید بسطامی قدّس سرہ کے کلمات طیبّہ مندرجہ ذیل جو تذکرۃالاولیاء میں حضرت فرید الدین عطّار صاحب نے بھی لکھے ہیں اور دوسری معتبر کتابوں میں بھی پائے جاتے ہیں اسی بناء پر ہیں جیسا کہ فر ما تے ہیں کہ میں ہی آدم ہوں میں ہی شیث ہوں میں ہی نوح ہوں میں ہی ابراہیم ہوں میں ہی موسیٰ ہوں میں ہی عیسیٰ ہوں میں ہی محمد ہوں صلی اللہ علیہ وسلم و علیٰ اخوانہ ٖ اجمعین اور اگر چہ انہیں کلمات کی وجہ سے حضرت بایزید بسطامی ستّر مرتبہ کا فر ٹھہرا کر بُسطام سے جو اُن کے رہنے کی جگہ تھی شہر بدر کئے گئے اور میاں عبد ا لر حمٰن خلف مولوی محمد کی طرح اُن لو گو ں نے بھیؔ بایزید بُسطامی کے کا فر اور مُلحد بنانے میں سخت غلو کیا
    ۱؂ آل عمران:۳۲
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 231
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 231
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/231/mode/1up
    لیکن اُس زمانہ کے گذرنے کے بعد پھر ایسے معتقد ہو گئے کہ جس کا حد انتہا نہیں اور اُن کے شطحیات کی بھی تا ویلیں کرنے لگے۔
    ایسا ہی سیّد عبدالقا در جیلا نی رضی اللہ عنہ اپنی کتاب فتو ح الغیب میں اس بات کی طرف اشارہ فر ما تے ہیں کہ انسان بحالت ترک نفس و اطلاق و فنا فی اللہ تمام انبیاء کا مثیل بلکہ اُنہیں کی صورت کا ہو جاتا ہے اور اس عاجز کے دوست مولوی ابو سعید محمد حسین صاحب بٹالوی نے بھی اپنے رسالہ اشاعۃالسنہ نمبر۷ جلد ۷ میں جواز و امکان مثیلیّت کے بارہ میں بہت کچھ لکھا ہے اور اگرچہ اس عاجز کے اس دعویٰ کی نسبت جو مثیل موعود ہو نے کے بارہ میں براہینؔ میں درج ہے اور بتصریح ظاہر کیا گیا ہے کہ قر آن کریم اور حدیث نبویہ میں اس عاجز کی نسبت بطور پیشگوئی خبر دی گئی ہے مو لو ی صاحب مو صو ف نے کھلے کھلے طور پر کو ئی اقرار نہیں کیا لیکن امکانی طور پر تسلیم کر گئے ہیں کیو نکہ اُن کا اس معرض بیان میں جو بمنصب ریو یو لکھنے کے اُن کے لئے ضروری تھا سکوت اختیار کر نا اور انکار اور منع سے زبان نہ کھولنا د لیلؔ قوی اس بات کی ہے کہ وہ اس بات کے بھی ہر گز مخالف نہیں کہ یہ عاجز مجازی اور روحانی طور پر وہی مسیح موعود ہے جس کی قر آن اور حدیث میں خبر دی گئی ہے کیونکہ براہین میں صاف طور پر اس بات کا تذکرہ کر دیا گیا تھا کہ یہ عاجز روحانی طور پر وہی موعود مسیح ہے جس کی اللہ ورسول نے پہلے سے خبر دے رکھی ہے۔ہاں اس بات سے اُس وقت انکار نہیں ہوا اور نہ اب انکار ہے کہ شاید پیشگوئیو ں کے ظاہری معنوں کے لحاظ سے کو ئی اَور مسیح موعود بھی آئندہ کسی وقت پیدا ہو مگر فرق اِس وقت کے بیان اور براہین احمدیہ کے بیان میں صرف اس قدر ہے کہ اُس وقت بباعث اجمال الہام کے اور نہ معلوم ہونے ہرایک پہلو کے اجمالی طور پر لکھا گیا تھا اور اب مفصل طور پر لکھاگیا بہر حال مولوی صاحب موصوف نے اس عا جز کے مثیل مسیح ہونے کے بارہ میں امکانی ثبوت پیدا کر نے کے لئے بہت زور دیا ہے چنانچہ ایک جگہ وہ محی الد ین ابن عربی صاحب کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 232
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 232
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/232/mode/1up
    کلام کو بغرض تائید مطلب ہذا فتوحات مکیہ باب ۲۲۳سے نقل کر تے ہیں اور وہ عبارت معہ ترجمہ مندرجہ ذیل ہے۔
    غایۃ الوصلۃ ان یکون الشیء عین ما ظھر ولا یعرف کما رأ یت رسولؔ اللّٰہ صلی اللہ علیہ و سلم وقد عانق ابن حزم المحدث فغاب احدھما فی الاٰخر فلم نرالا واحداً وھو رسول اللّٰہ صلعم فھذہ غایۃ الوصلۃ وھو المعبر عنہ بالاتحاد (فتوحات مکیۃ)
    یعنی نہایت درجہ کا اتصال یہ ہے کہ ایک چیز بعینہٖ وہ چیز ہو جا ئے جس میں وہ ظا ہر ہو اور خود نظر نہ آو ے جیسا کہ مَیں نے خواب میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا کہ آپ نے ابو محمد بن حزم محدث سے معانقہ کیا۔پس ایک دوسرے میں غائب ہو گیا بجز ایک رسول اللہ صلعم کے نظر نہ آیا۔پھر بعد اس کے مولوی صاحب موصوف اپنے اس بیان کی تائید میں نواب صدیق حسن مرحوم کی کتاب اتحاف النبلاء میں سے ایک عربی رباعی معہ ترجمہ نقل کر تے ہیں اور وہ یہ ہے۔
    توھم راشینا بلیل مزارہ
    فھمّ لیسعی بیننا بالتباعد
    فعانقتہ حتی اتحدنا تعانقًا
    فلمّا اتانا مارأی غیر واحد
    جس کا ترجمہ یہ ہے۔ ہمارے بد گو (رقیب) نے شب کو ہمارے پاس ہمارے معشوق کے آنے کا گمان کیا تو ہم میں جدائی ڈالنے میں کوشش کرنے لگا۔پس میں نے اپنے معشوق کو گلے سے لگا لیا۔پھر وہ (رقیب )آیا تو اُس نے بجز ؔ مجھ ایک کے کسی کو نہ دیکھا۔پھر یہ شعر فارسی نقل کیاہے۔
    جذبۂ شوق بحدیست میان من و تو
    کہ رقیب آمد ونہ شناخت نشان من و تو
    اس کے بعد یہ جملہ دعائیہ لکھا ہے رزقنااللہ من ھٰذالاتحاد فی الدنیا والاٰخرۃ یعنی خدائے تعالیٰ ہم کو بھی ایسا ہی اتحا د دنیا اورآخرت میں نصیب کرے۔
    پھرمیں مسیح ابن مریم کے فوت ہو جانے کی نسبت تتمہ کلام بیان کرنا چاہتا ہوں اور وہ یہ ہے کہ اگر یہ اعتراض پیش کیا جائے کہ گو احادیث اور فرقان اورانجیل کی رُو سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 233
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 233
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/233/mode/1up
    مسیح ابن مریم کا فوت ہو جانا ثابت ہوتا ہے لیکن ساتھ ہی فرقان حمید میں رافعک الیّ کا لفظ بھی تو موجود ہے جس سے یہ سمجھا جاتا ہے کہ وہ زندہ ہو کر پھرآسمان کی طرف اُٹھایا گیا۔
    اس وہم کا جواب یہ ہے کہ آسمان کا تو کہیں اس جگہ ذکر بھی نہیں اس کے معنے تو صرف اس قدر ہیں کہ مَیں اپنی طرف تجھے اُٹھالوں گا اور ظاہر ہے کہ جو نیک آدمی مرتا ہے اُسی کی طرف روحانی طورپر اُٹھایا جاتاہے کیا خدائے تعالیٰ دوسرے آسمان پر بیٹھا ہوا ہے جہاں حضرت یحییٰ اورحضرت عیسیٰ کی روح ہے اورنیز جس حالت میں قرآن شریف اور حدیث کی رو سے ثابت ہوتا ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام بلاشبہ فوت ہوگئے تھے تو پھر اس ثبوت کے بعد رفع سے مراد جسم کے ساتھ اُٹھایا جانا کمال درجہ کی غلطی ہے بلکہ صریح اور بدیہی طور پر سیاق وسباق قرآن شریف سے ثابت ہو رؔ ہا ہے کہ حضرت عیسیٰ کے فوت ہونے کے بعد اُن کی روح آسمان کی طرف اُٹھائی گئی۔وجہ یہ کہ قرآن شریف میں صاف طور پر لکھا گیا ہے کہ ہریک مومن جو فوت ہوتا ہے تو اس کی روح خدائے تعالیٰ کی طرف اُٹھائی جاتی ہے اور بہشت میں داخل کی جاتی ہے جیساکہ اللہ جلَّشَانُہٗ فرماتاہے :۔
    يٰۤاَيَّتُهَا النَّفْسُ الْمُطْمَٮِٕنَّةُ ارْجِعِىْۤ اِلٰى رَبِّكِ رَاضِيَةً مَّرْضِيَّةً
    فَادْخُلِىْ فِىْ عِبٰدِىۙ وَادْخُلِىْ جَنَّتِى ۱؂ اے وہ نفس جو خدائے تعالیٰ سے آرام یافتہ ہے اپنے رب کی طرف چلا آ۔تُو اس سے راضی وہ تجھ سے راضی پس میرے بندوں میں داخل ہوجا اور میرے بہشت میں اندرآ۔اس جگہ صاحب تفسیر معالم اس آیت کی تفسیر کرکے اپنی کتاب کے صفحہ ۹۷۵ میں لکھتے ہیں کہ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب بندہ مومن وفات پانے پر ہوتا ہے تو اس کی طرف اللہ جلَّشَانُہٗ دوفرشتے بھیجتاہے اور اُن کے ساتھ کچھ بہشت کا تحفہ بھی بھیجتا ہے اور وہ فرشتے آکر اس کی روح کو کہتے ہیں کہ اے نفس مطمئنہ تو رَوح اور رَیحان اور اپنے رب کی طرف جو تجھ سے راضی ہے نکل آ۔ تب وہ روح مشک کی اس خوشبو کی طرح جو بہت لطیف اور خوش کرنے والی ہو
    ۱؂ الفجر: ۲۸ تا ۳۱ ‌ۚ‏
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 234
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 234
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/234/mode/1up
    جو ناک میں پہنچ کر دماغ کو معطّر کر دیتی ہو باہر نکل آتی ہے اورؔ فرشتے آسمان کے کناروں پر کہتے ہیں کہ ایک روح چلی آتی ہے جو بہت پاکیزہ اور خوشبو دارہے۔ تب آسمان کا کوئی دروازہ ایسا نہیں ہوتا جو اس کے لئے کھولا نہ جائے اور کوئی فرشتہ آسمان کا نہیں ہوتا کہ اُس کے لئے دعانہ کرے یہاں تک کہ وہ روح پایۂ عرش الٰہی تک پہنچ جاتی ہے تب خدائے تعالیٰ کو سجدہ کرتی ہے پھر میکائیل کو حکم ہوتا ہے کہ جہاں اور روحیں ہیں وہیں اس کو بھی لے جا۔
    اب قرآن شریف کی اس آیت اور حضرت عبداللہ بن عمر کی روایت سے بخوبی ثابت ہو گیا کہ روح مومن کی اُس کے فوت ہونے کے بعد بلا توقف آسمان پر پہنچائی جا تی ہے جبکہ حقیقت حال یہ ہے تو پھر قرآن شریف کی اس آیت کو کہ يٰعِيْسٰىۤ اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَىَّ ۱؂ ہے یا اس آیت کو کہ بَل رَّفَعَهُ اللّٰهُ اِلَيْهِ ۲؂ ہے اس طرف کھینچنا کہ گویا حضرت عیسیٰ جسم کے ساتھ آسمان پر اُٹھائے گئے تھے صریح تحکم اورزبردستی ہو گی کیو نکہ جبکہ برطبق روایت ابن عباس و سیاق و سباق کلام الٰہی متوفّیک کے معنی یہی ہیں کہ میں تجھے ماروں گا تو پھر صاف ظاہر ہے جیساکہ ابھی ہم بحوالہ کلام الٰہی لکھ چکے ہیں کہؔ موت کے بعد نیک بختوں کی روح بلا توقف آسمان کی طرف جاتی ہے یہ تو نہیں کہ فرشتہ ملک الموت روح کو نکال کر کئی گھنٹہ تک وہیں کھڑا رہتا ہے۔اب اگر ہم فرض کے طور پر وہب کی روایت کو قبول کر لیں کہ حضرت عیسیٰ تین گھنٹہ تک مرے رہے یا سات گھنٹہ تک مردہ پڑے رہے تو کیا ہم یہ بھی قبول کرسکتے ہیں کہ تین گھنٹہ تک یا سات گھنٹہ تک فرشتہ ملک الموت اُن کی رُوح اپنی مُٹھی میں لے کر اُسی جگہ بیٹھا رہا یا جہاں جہاں لاش کو لوگ لے جاتے رہے ساتھ پھرتا رہا اور آسمان کی طرف اس روح کو اُٹھا کر نہیں لے گیا۔ایساوہم تو سراسرخلاف نص و حدیث اورمخالف تمام کتب الہامیہ ہے اور جبکہ ضروری طورپر یہی ماننا پڑا کہ ہریک مومن کی روح مرنے کے بعد آسمان کی طرف اُٹھائی جاتی ہے تو اس سے صاف طورپر کُھل گیا کہ رافعک الیّ کے یہی معنے ہیں کہ جب حضرت عیسیٰ فوت ہو چکے تو اُن کی روح
    ۱؂ اٰل عمران: ۵۶ ۲؂ النساء:۱۵۹
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 235
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 235
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/235/mode/1up
    آسمان کی طرف اُٹھائی گئی بلاشبہ ہریک شخص کا نُورِ قلب اورکانشنس بلا تردّد اس بات کو سمجھ لیتا اور قبول کرلیتا ہے کہ ایک شخص مومن کی موت کے بعد شرعی اور طبعی طورپر یہی ضروری امر ہے کہ اس کی روح آسمان کی طرفؔ اُٹھائی جائے اور اس طریق کا انکار کرنا گویا امہات مسائل دین کا انکار ہے اورنص اورحدیث سے کوئی ثبوت اس کا نہیں مل سکتا اگرحضرت عیسیٰ حقیقت میں موت کے بعد پھر جسم کے ساتھ اُٹھائے گئے تھے تو قرآن شریف میں عبارت یوں چاہیئے تھی یا عیسٰی انی متوفّیک ثم مُحییک ثم رافعک مع جسد ک الی السمآء یعنی اے عیسیٰ مَیں تجھے وفات دوں گا پھر زندہ کروں گا پھر تجھے تیرے جسم کے ساتھ آسمان کی طرف اُٹھالوں گا۔لیکن اب تو بجُز مجرد رافعک کے جومتوفّیک کے بعد ہے کوئی دوسرا لفظ رافعک کا تمام قرآن شریف میں نظر نہیں آتا جو ثم محییک کے بعد ہو اگر کسی جگہ ہے تو وہ دکھلانا چاہیئے۔ میں بدعویٰ کہتا ہوں کہ اس ثبوت کے بعد کہ حضرت عیسیٰ فی الحقیقت فوت ہو گئے تھے یقینی طور پر یہی مانناپڑے گا کہ جہاں جہاں رافعک یا بل رفعہ اللہ الیہ ہے اس سے مراد اُن کی روح کا اُٹھایا جانا ہے جو ہریک مومن کے لئے ضروری ہے۔ ضروری کو چھوڑ کر غیر ضروری کا خیال دل میں لانا سراسر جہل ہے۔ہم بیا ن کر چکے ہیں کہ تمام نبی خدائے تعالیٰ کی طرف ہی اُٹھائے جاتے ہیں۔
    اب ؔ ہم بخوبی ثابت کر چکے ہیں کہ یہ عقیدہ کہ مسیح جسم کے ساتھ آسمان پر چلا گیا تھا قرآن شریف اوراحادیث صحیحہ سے ہرگز ثابت نہیں ہوتا صرف بیہودہ اور بے اصل اور متناقض روایات پراس کی بنیاد معلوم ہوتی ہے مگر اس فلسفی الطبع زمانہ میں جو عقلی شائستگی اور ذہنی تیزی اپنے ساتھ رکھتا ہے ایسے عقیدوں کے ساتھ دینی کامیابی کی اُمید رکھنا ایک بڑی بھاری غلطی ہے اگر افریقہ کے ریگستان یا عرب کے صحرانشین اُمّیوں اور بدّوؤں میں یا سمندر کے جزیروں کے اور وحشی لوگوں کی جماعتوں میں یہ بے سروپا باتیں پھیلائیں تو شایدآسانی سے پھیل سکیں لیکن ہم ایسی تعلیمات کو جو عقل اور تجربہ اور طبعی اور فلسفہ سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 236
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 236
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/236/mode/1up
    بکلّی مخالف اور نیز ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے ثابت نہیں ہوسکتیں بلکہ اُن کے مخالف حدیثیں ثابت ہورہی ہیں تعلیم یافتہ لوگوں میں ہرگز نہیں پھیلا سکتے اور نہ یورپ امریکہ کے محقق طبع لوگوں کی طرف جو اپنے دین کے لغویات سے دست بردار ہو رہے ہیں بطور ہدیہ و تحفہ بھیج سکتے ہیں۔ جن لوگوں کے دل اور دماغ کو نئے علوم کی روشنی نے انسانی قوتوں میں ترقی دے دی ہے وہ ایسی باتوں کو کیوں کر تسلیم کرلیں گے جن میں سراسر خدائے تعالیٰ کی توہین اور اسؔ کی توحید کی اہانت اور اس کے قانون قدرت کا ابطال اور اس کے کتابی اصول کی تنسیخ پائی جاتی ہے۔
    اس جگہ یہ بھی یاد رکھنا چاہیئے کہ مسیح کا جسم کے ساتھ آسمان سے اُترنا اُس کے جسم کے ساتھ چڑھنے کی فرع ہے لہذا یہ بحث بھی کہ مسیح اُسی جسم کے ساتھ آسمان سے اُترے گا جو دنیا میں اُسے کو حاصل تھا اس دوسری بحث کی فرع ہوگی جو مسیح جسم کے ساتھ آسمان پر اُٹھایا گیا تھا جبکہ یہ بات قرار پائی تواّول ہمیں اُس عقیدہ پر نظر ڈالنا چاہیئے جو اصل قرار دیا گیا ہے کہ کہاں تک وہ قرآن اورحدیث سے ثابت ہے۔کیونکہ اگر اصل کا کما حقہ‘ تصفیہ ہوجائے گا تو پھر اُس کی فر ع ماننے میں کچھ تامل نہیں ہوگا اور کم سے کم امکانی طور پر ہم قبول کرسکیں گے کہ جب کہ ایک شخص کا جسم خاکی کے ساتھ آسمان پر چلے جانا ثابت ہوگیا ہے تو پھر اُسی جسم کے ساتھ واپس آنا اُس کا کیا مشکل ہے لیکن اگر اصل بحث قرآن اور حدیث سے ثابت نہ ہو سکے بلکہ حقیقت امر اس کے مخالف ثابت ہو تو ہم فرع کو کسی طرح سے تسلیم نہیں کرسکتے اگر فرع کی تائید میں بعض حدیثیں بھی ہوں گی تو ہم پر فرض ہو گا کہ اُن کو اصل سے تطبیق دینے کے لئے کوششؔ کریں اور اگر برعایت اصل وہ حدیثیں حقیقت پر حمل نہ ہوسکیں تو پھر ہم پر واجب ہو گا کہ انہیں استعارات و مجازات میں داخل کرلیں اوربجائے مسیح کے اُترنے کے کسی مثیل مسیح کا اُترنا مان لیں جیساکہ خود حضرت مسیح نے ایلیا نبی کی نسبت مان لیا۔ حالانکہ تمام یہودیوں کا اسی پر اجماع تھا اور اب تک ہے کہ ایلیا آسمان سے اُترآئے گا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 237
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 237
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/237/mode/1up
    یاد رکھناچاہئے کہ ایلیا کا آسمان پر جانا اور پھر آسمان سے کسی زمانہ میں اُترنا بطور پیشگوئی ایک وعدہ تھا اور یہودیوں کا اجماعی عقیدہ مسلمانوں کی طرح اب تک یہی ہے کہ حضرت ایلیا جسم کے ساتھ آسمان پر زندہ اُٹھائے گئے اور پھر آخری زمانہ میں اُسی جسم کے ساتھ پھرآسمان سے اُتریں گے چنانچہ ایلیا کا جسم کے ساتھ آسمان پر جانا سلاطین ۲ باب ۲ آیت ۱۱ میں مندرج ہے اور پھر اس کے اُترنے کا وعدہ صحیفہ ملاکی کے باب ۴ آیت ۵میں بطور پیشگوئی کے دیا گیا ہے جس کے اب تک یہودی لوگ منتظر ہیں اور حضرت مسیح نے جو حضرت یحییٰ کی نسبت کہا کہ ایلیا جو آنیوالا تھا یہی ہے یہ کلمہ جمہور یہود کے اجماع کے برخلاف تھا۔اسی وجہ سے اُنہوں نے نہ مسیح کو قبول کیا نہ یحییٰ کو۔ کیونکہ وہ تو آسمان کی راہ دیکھ رہے تھے کہ کبؔ ایلیا فرشتوں کے کندھوں پر اُترتا ہے اور بڑی مشکلات اُن کو یہ پیش آ گئی تھیں کہ اسی طور کے اُترنے پر اُن کا اجماع ہو چکا تھا اور ظواہر نصوص صحیفہ سلاطین و صحیفہ ملاکی اسی پر دلالت کرتے تھے۔سو انہوں نے اس آزمائش میں پڑ کر حضرت یحییٰ علیہ السلام کو قبول نہ کیا بلکہ مسیح کی نبوت سے بھی انکاری رہے کیونکہ اُن کی کتابوں میں لکھا تھا کہ ضرور ہے کہ مسیح کے آنے سے پہلے ایلیا آسمان سے اُتر آوے سو چونکہ ایلیا کا آسما ن سے اُترنا جس طرح انہوں نے اپنے دلوں میں مقرر کر رکھا تھا اُسی طرح ظہور میں نہ آیا۔اس لئے ظاہر پرستی کی شامت سے یہودیوں کو دو سچے نبیوں کی نبوت سے منکر رہنا پڑا یعنی مسیح اور یحییٰ سے۔ اگر وہ لوگ اس ظاہرپرستی سے باز آکر سلاطین اور ملاکی کی عبارتوں کو استعارات و مجازات پر حمل کر لیتے تو آج دنیا میں ایک بھی یہودی نظر نہ آتا سب کے سب عیسائی ہو جاتے کیونکہ صحیفہ سلاطین اور صحیفہ ملاکی میں ایلیا نبی کے دوبارہ آنے سے درحقیقت مراد یہی تھی کہ ظِلّی اورمثالی وجود کے ساتھ پھر ایلیا دنیا میں آئے گا جس سے مراد حضرت یحییٰ کا آنا تھا جو باعتبار اپنے روحانی خواص کے مثیل ایلیا تھے لیکنؔ یہودیوں نے اپنی بد قسمتی اور بے سعادتی کی وجہ سے اُن روحانی معنوں کی طرف رُخ نہ کیا اور ظاہر پرستی میں پھنسے رہے۔اور درحقیقت ذرہ غور سے دیکھیں تو یہودیوں کو حضرت یحییٰ کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 238
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 238
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/238/mode/1up
    قبول کرنے کے بارہ میں جو مشکلات پیش آگئے تھے اتنے بڑے مشکلات ہمارے بھائی مسلمانوں کو ہرگز پیش نہیں آئے کیونکہ سلاطین ۲ باب ۲ میں صاف طور پر لکھا ہوا اب تک موجود ہے کہ ایلیا نبی جسم کے ساتھ آسمان کی طرف اُٹھایا گیا اورچادراُس کی زمین پر گر پڑی اور پھرملاکی باب ۴ آیت ۵ میں ایسی ہی صفائی کے ساتھ وعدہ دیا گیا ہے کہ پھر وہ دنیا میں آئے گا اور مسیح کے لئے راہ درست کرے گا لیکن ہمارے بھائی مسلمان ان تمام مشکلات سے بالکل آزاد ہیں کیو نکہ قرآن شریف میں جسم کے ساتھ اُٹھائے جا نے کا اشارہ تک بھی نہیں بلکہ مسیح کے فوت ہوجانے کا بتصریح ذکر ہے اگرچہ حدیثوں کی بے سروپار وایتوں میں سند منقطع کے ساتھ ایسا ذکر بہت سے تناقض سے بھرا ہوا کہیں کہیں پایا جاتا ہے لیکن ساتھ اس کے اُنہیں حدیثوں میں مسیح کا فوت ہونا بھی بیان کیا گیا ہے۔ اب ظاہر ہے کہ باوجود اس تعارض اور تناقض کےؔ ضرورت ہی کیا ہے جو غیر معقول شق کی طرف توجہ کی جائے جس حالت میں قر آن اور حدیث کے روسے وہ راہ بھی کھلی ہوئی نظر آتی ہے جس پر کو ئی اعتراض شرع اور عقل کا نہیں یعنی مسیح کا فوت ہوجانا اور رُوح کااُٹھا یا جانا تو کیوں ہم اُسی راہ کو قبول نہ کریں جس پر قرآن شریف کی بیّنات زور دے رہی ہیں ؟۔
    ہم نے ایلیا کے صعود و نزول کا ِ قصہ اس غرض سے اس جگہ لکھا ہے کہ تا ہمارے بھائی مسلمان ذرہ غور کر کے سوچیں کہ جس مسیح ابن مریم کے لئے وہ لڑتے مرتے ہیں اُسی نے یہ فیصلہ دیا ہے اور اسی فیصلہ کی قرآن شریف نے بھی تصدیق کی ہے۔ اگر آسمان سے اُتر نا اِسی طور سے جائز نہیں جیسے طور سے ایلیا کا اُتر نا حضرت مسیح نے بیان فرمایا ہے تو پھر مسیح منجانب اللہ نبی نہیں ہے بلکہ نعوذ باللہ قرآن شریف پر بھی اعتراض آتا ہے جو مسیح کی نبوت کا مصدق ہے اب اگر مسیح کو سچا نبی ماننا ہے تو اس کے فیصلہ کو بھی مان لینا چاہئے زبردستی سے یہ نہیں کہنا چاہئے کہ یہ ساری کتابیں محرّف و مبدّل ہیں بلا شبہ ان مقامات سے تحریف کا کچھ علاقہ نہیں اور دونوں فریق یہود و نصاریٰ ان عبارتوں کی صحت کے قائل ہیں اور پھر ہمارے امام ا لمحدثین
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 239
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 239
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/239/mode/1up
    حضرت اسمٰعیل صاحب اپنی صحیح بخاری میں یہ بھی لکھتے ہیں کہ ان کتابوں میں کو ئی لفظی تحریف نہیں۔
    یہ بات یاد رکھنے کے لائق ہے اور پہلے بھی ہم کئی مرتبہ ذکرکرؔ آئے ہیں کہ جس قدر پیشگوئیاں خدائے تعالیٰ کی کتابوں میں موجود ہیں اُن سب میں ایک قسم کی آزمائش ارادہ کی گئی ہے اس میں کچھ شک نہیں کہ اگر کوئی پیشگوئی صاف اور صریح طور پر کسی نبی کے بارے میں بیان کی جاتی تو سب سے پہلے مستحق ایسی پیشگوئی کے ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم تھے کیونکہ اگر مسیح کے اُترنے سے انکار کیا جائے تو یہ امر کچھ مستوجب کفر نہیں لیکن اگر ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت سے انکار کیا جاوے تو بلاشبہ وہ انکار جاودانی جہنّم تک پہنچائے گا۔ مگر ناظرین کو معلوم ہوگا کہ تمام توریت و انجیل میں ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت اور ایسا ہی حضرت مسیح کی نسبت بھی کوئی ایسی کھلی کھلی اور صاف پیشگوئی نہیں پائی جاتی جس کے ذریعہ سے ہم یہودیوں کو جا کر گردن سے پکڑلیں۔حضرت مسیح بھی باربار یہودیوں کو کہتے رہے کہ میری بابت موسیٰ نے توریت میں لکھا ہے مگر یہودیوں نے ہمیشہ انہیں یہی جواب دیا کہ اگر چہ یہ سچ ہے کہ ہماری کتابوں میں ایک مسیح کے آنے کی بھی خبر دی گئی ہے مگر تم خود دیکھ لوکہ مسیح کے آنے کا ہمیں یہ نشان دیا گیا ہے کہ ضرور ہے کہ اس سے پہلے ایلیا آسمان سے اُترے جس کا آسمان پر جانا سلاطین کی کتاب میںؔ بیان کیا گیا ہے اس کے جواب میں ہر چند حضرت مسیح یہی کہتے رہے کہ وہ ایلیا یو حنا یعنی یحیٰیزکریا کا بیٹا ہے مگر اس دور دراز تاویل کو کون سُنتا تھا اور ظاہر تقریر کی رُو سے یہودی لوگ اس عذ ر میں سچے معلوم ہوتے تھے سو اگرچہ خدائے تعالیٰ قادر تھا کہ ایلیا نبی کو آسمان سے اُتارتا اور یہودیوں کے تمام وساوس بکلّی رفع کر دیتا لیکن اُس نے ایسا نہیں کیا تا صادق اور کاذب دونوں آزمائے جائیں کیونکہ شریر آ دمی صرف ظاہری حُجّت کی رُو سے بے شبہ ایسے مقام میں سخت انکار کر سکتا ہے لیکن ایک را ستباز آدمی کے سمجھنے کے لئے یہ راہ کھلی تھی کہ آسمان سے اُترنا کسی اور طور سے تعبیر کیا جائے اور ایک نبی جو دوسری علامات صدق اپنے ساتھ رکھتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 240
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 240
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/240/mode/1up
    اُن علامات کے لحاظ سے اُس پر ایمان لایا جاوے ہاں یہ سچ اور بالکل سچ ہے کہ اگر سلاطین اور ملاکی کے بیانات کو مسلمان لوگ بھی یہودیوں کی طرح محمول پر ظاہر کریں تو وہ بھی کسی طرح یحیٰی بن زکریا کو مصداق اُس کی پیشگوئی کا نہیں ٹھہراسکتے اور اس پیچ میں آکر مسیح ابن مریم کی نبوت بھی ہر گز ثابت نہیں ہو سکتی۔ قرآن شریف نے مسیح کی تا ویل کو جو ایلیا نبی کے آسمان سے اُتر نے کے بارہ میں انہوں نے کی تھی قبولؔ کر لیا اورمسیح کو اور یحییٰ کو سچا نبیْ ٹھہرایا ورنہ اگر قرآن شریف ایلیا کا آسمان سے اُترنا اسی طرح معتبر سمجھتا یعنی ظاہری طور پر جیسا کہ ہمارے بھائی مسلمان مسیح کے اُترنے کے بارہ میں سمجھتے ہیں تو ہرگز مسیح کو نبی قرار نہ دیتا کیونکہ سلاطین اور ملاکی آسمانی کتابیں ہیں اگر ان مقامات میں اُن کے ظاہری معنے معتبر ہیں تو ان معانی کے چھوڑنے سے وہ سب کتابیں نکمّی اور بے کار ٹھہر جائیں گی۔ میرے دوست مولوی محمد حسین صاحب اس مقام میں بھی غور کریں ؟ اور اگر یہ کہا جا ئے کہ کیا یہ ممکن نہیں کہ سلاطین اور ملاکی کے وہ مقامات محرّ ف و مبدّل ہوں تو جیسا کہ ابھی میں لکھ چکا ہوں تو یہ سراسر وہم و گمان باطل ہے کیونکہ اگر وہ مقام محر ف و مبدل ہوتے تو مسیح بن مریم کا یہودیوں کے مقابل پر یہ عمدہ جواب تھاکہ جو کچھ تمہاری کتابوں میں ایلیا کا آسمان پر جانا اورپھر اُترنے کا وعدہ لکھاہے یہ بات ہی غلط ہے اور یہ مقامات تحریف شدہ ہیں۔
    بلکہ مسیح نے تو ایسا عذر پیش نہ کرنے سے اُن مقامات کی صحت کی تصدیق کردی۔ ماسوا اس کے وہ کتابیں جیسے یہودیوں کے پاس تھیں ویسے ہی حضرت مسیح اور اُن کے حواری اُن کتابوں کو پڑھتے تھے اوراُن کے نگہبان ہوگئے تھے اور یہودیوں کے لئے ؔ ہم کوئی ایسا موجب عند العقل قرار نہیں دے سکتے جو ان مقامات کے محرف کرنے کے لئے انہیں بے قرار کرتا۔ اب حاصل کلام یہ کہ مسیح کی پیشگوئی کے بارے میں ایلیا کے قصّہ نے یہودیوں کی راہ میں ایسے پتھر ڈال دئے کہ اب تک وہ اپنے اس راہ کو صاف نہیں کر سکے اوربے شمار روحیں اُن کی کفر کی حالت میں اِس دنیا سے کوچ کر گئیں۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 241
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 241
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/241/mode/1up
    اب ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں توریت کی پیشگوئیوں پر نظر ڈالیں کہ اگرچہ توریت کے دو مقام میں ایسی پیشگوئیاں ملتی ہیں کہ جو غور کرنے والوں پر بشرطیکہ منصف بھی ہوں ظاہر کرتی ہیں کہ درحقیقت وہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بارہ میں لکھی گئی ہیں۔ لیکن کج بحثی کے لئے ان میں گنجائش بھی بہت ہے۔مثلًا توریت میں لکھا ہے کہ حضرت موسیٰ نے بنی اسرائیل کو کہا کہ خداوند تیرا خدا تیرے لئے تیرے ہی درمیان سے تیرے ہی بھائیوں میں سے میری مانند ایک نبی قائم کرے گا۔ اس پیشگوئی میں مشکلات یہ ہیں کہ اُسی توریت کے بعض مقامات میں بنی اسرائیل کو ہی بنی اسرائیل کے بھائی لکھاہے اور بعض جگہ بنی اسمٰعیل کو بھی بنی اسرائیل کے بھائی لکھا ہے ایسا ہی دوسرے بھائیوں کا بھی ذکر ہے۔اب اس بات کاؔ قطعی اوربدیہی طور پر کیوں کر فیصلہ ہو کہ بنی اسرائیل کے بھائیوں میں سے مراد فقط بنی اسمٰعیل ہی ہیں بلکہ یہ لفظ کہ ’’تیرے ہی درمیان سے ‘‘ لکھا ہے زیادہ عبارت کو مشتبہ کرتا ہے اور گو ہم لوگ بہت سے دلائل اور قرائن کو ایک جگہ جمع کر کے اورآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور حضرت موسیٰ میں جو مماثلت ہے بپایۂ ثبوت پہنچاکر ایک حق کے طالب کے لئے نظری طورپر یہ بات ثابت کر دکھاتے ہیں کہ درحقیقت اس جگہ اس پیشگوئی کا مصداق بجُز ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے اور کوئی شخص نہیں۔لیکن یہ پیشگوئی ایسی صاف اور بدیہی تو نہیں کہ ہرایک اجہل اوراحمق کو اس کے ذریعہ سے ہم قائل کرسکیں بلکہ ا س کا سمجھنا بھی پوری عقل کا محتاج ہے اور پھر سمجھانا بھی پوری عقل کا محتاج۔اگر خدائے تعالیٰ کو ابتلا خلق اللہ کا منظورنہ ہوتا اور ہر طرح سے کھلے کھلے طور پر پیشگوئی کا بیان کرنا ارادۂ الٰہی ہوتا تو پھر اس طرح پر بیان کرنا چاہیئے تھا کہ اے موسیٰ میں تیرے بعد بائیسویں صدی میں ملک عرب میں بنی اسمٰعیل میں سے ایک نبی پیداکروں گا جس کا نام محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہوگا اور اُن کے باپ کانام عبداللہ اورداداکا نام عبدالمطلب اوروالدہ کانام آمنہ ہو گا۔اور وہ مکہ شہرمیں پیدا ہو ں گے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 242
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 242
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/242/mode/1up
    اوراُن کایہُ حلیہ ہو گا۔اب ظاہر ہے کہ اگر ایسی پیشگوئی تورؔ یت میں لکھی جاتی تو کسی کو چو ن و چرا کرنے کی حاجت نہ رہتی اورتمام شریروں کے ہاتھ پَیرباندھے جاتے لیکن خدائے تعالیٰ نے ایسا نہیں کیا۔اب سوال یہ ہے کہ کیاخدائے تعالیٰ ایساکرنے پر قادرنہ تھا ؟ اس کا جواب یہی ہے کہ بلا شبہ قادرتھا بلکہ اگر چاہتا تو اس سے بڑھ کر ایسے صاف صاف اور کھلے کھلے نشان لکھ دیتا کہ سب گردنیں اُن کی طرف جُھک جاتیں اور دُنیا میں کوئی منکر نہ رہتا۔ مگراُس نے اِس تصریح اورتوضیح سے لکھنا اس لئے پسند نہیں کیا کہ ہمیشہ پیشگوئیوں میں ایک قسم کا ابتلا بھی اُسے منظورہوتا ہے تا سمجھنے والے اورحق کے سچے طالب اس کو سمجھ لیں۔ اور جن کے نفسوں میں نخوت اور تکبر اور جلد بازی اور ظاہر بینی ہے وہ اس کے قبول کرنے سے محروم رہ جائیں۔
    اب یقینًا سمجھو کہ یہی حال اس پیشگوئی کا ہے کہ جو کہا گیا ہے کہ ابن مریم دو فرشتوں کے کندھوں پر ہاتھ رکھے ہوئے دمشق کے شرقی طرف منارہ کے پاس اُترے گا کیونکہ اگر اسی طور اور اسی ظاہری صورت پر پیشگوئی نے پورا ہونا ہے تو پھر ایسے طور سے اُترنے کے وقت میں دنیا کے باشندوں میں سے کون منکر رہ سکتا ہے ؟تمام قوموں کو جو اَب دنیا پر بستی ہیں کیا یہودی اورکیا عیسائی اور کیاہندو اور بدھ مذہب والے او رؔ مجوسی غرض سب فرقوں کو پوچھ کر دیکھ لو کہ اگر اس طور سے اُترتا کوئی نبی تمہیں دکھائی دے تو کیا پھر بھی تم اس کی نبوت اور اس کے دین میں کچھ شک اور شبہ رکھتے رہو گے ؟ بلاشبہ تمام لوگ یہی جواب دیں گے کہ اگر ہم ایسا بزرگ فرشتوں کے کندھوں پر ہاتھ رکھے ہوئے آسمان سے اُترتا ہوا دیکھ لیں تو بلاشبہ ایمان لے آویں گے حالانکہ اللہ جلَّ شَانُہٗ قرآن شریف میں یہ فرماتا ہے
    يٰحَسْرَةً عَلَى الْعِبَادِ ‌ۚ مَا يَاْتِيْهِمْ مِّنْ رَّسُوْلٍ اِلَّا كَانُوْا بِهٖ يَسْتَهْزِءُوْنَ ۱؂ یعنی اے حسرت بندوں پر کہ ایسا کوئی نبی نہیں آتا جس سے وہ ٹھٹھا نہ کریں۔ایساہی قرآن شریف کے دوسرے مقامات میں
    ۱؂ یٰسٓ ۳۱‏
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 243
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 243
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/243/mode/1up
    جابجا لکھا ہواہے کہ کوئی نبی ایسا نہیں آیا جس کو لوگوں نے بالاتفاق مان لیا ہو۔ اب اگر حضرت مسیح بن مریم نے درحقیقت ایسے طور سے ہی اُترنا ہے جس طور سے ہمارے علماء یقین کئے بیٹھے ہیں تو ظاہر ہے کہ اس سے کوئی فرد بشر انکار نہیں کرسکتالیکن ہمارے علماء کو یاد رکھنا چاہیئے کہ ایسا کبھی نہیں ہو گا۔کیونکہ خدائے تعالیٰ قرآن شریف میں صاف فرماتا ہے کہ اگر میں فرشتوں8 کو بھی زمین پر نبی مقرر کرکے بھیجتا تو انہیں بھی التباس اور اشتباہ سے خالی نہ رکھتا۔یعنی اُن میں بھی ؔ شبہ اور شک کرنے کی جگہ باقی رہتی ہے۔صاف ظاہر ہے کہ یہی معجزہ آسمان سے اُترنے کاہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے بھی مانگا گیا تھا اور اُس وقت اِس معجزہ کے دکھلانے کی بھی ضرورت بہت تھی کیونکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے انکار رسالت کرنے سے جہنم ابدی کی سزا تھی مگر پھر بھی خدائے تعالیٰ نے یہ معجزہ نہ دکھایا اور سائلوں کو صاف جواب ملاکہ اس دارالابتلاء میں ایسے کھلے کھلے معجزات خدائے تعالیٰ ہرگز نہیں دکھاتاتاایمان بالغیب کی صورت میں فرق نہ آوے ۔کیونکہ جب خدائے تعالیٰ کی طرف سے ایک بندہ اُترتا ہوا دیکھ لیا اور فرشتے بھی آسمان سے اُترتے ہوئے نظرآئے توپھر تو بات ہی بکلّی فیصلہ ہو گئی تو پھر کون بدبخت ہے جو اس سے منکر رہے گا ؟ قرآن شریف اس قسم کی آیات سے بھرا پڑا ہے جن میں لکھا ہے کہ ایسے معجزات دکھانا خدائے تعالیٰ کی عادت نہیں ہے اور کفّار مکہ ہمیشہ ایسے ہی معجزات مانگاکرتے تھے۔اور خدائے تعالیٰ برابر انہیں یہ کہتا تھا کہ اگر ہم چاہیں تو کوئی نشان آسمان سے ایسا نازل کریں جس کی طرف تمام منکروں اورکافروں کی گردنیں جھک جائیں۔لیکن اس دارالابتلاء میں ایسا نشان ظاہر کرنا ہماری عادؔ ت نہیں کیونکہ اس سے ایمان بالغیب جس پر تمام ثواب مترتب ہوتا ہے ضائع اور دُور ہو جاتا ہے۔سو اے بھائیو! میں محض نصیحتًا للہ آپ لوگوں کو سمجھاتا ہوں کہ اس خیال محال سے بازآجاؤ۔ان دو قرینوں پر متوجہ ہو کر نظر ڈالو کہ کس قدر قوی اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 244
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 244
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/244/mode/1up
    کھلے کھلے ہیں۔اوّل ایلیا نبی کا آسمان سے اُترنا کہ آخر وہ اُترے تو کس طرح اُترے۔دوسرے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے یہی سوال ہونا اور قُلْ سُبْحَانَ رَبِّىْ ۱؂ اس کا جواب ملنا۔اپنے دلوں میں سوچو کہ کیا یہ اس بات کے سمجھنے کے لئے قرائن قویہ اور دلائل کافیہ نہیں کہ آسمان سے اُترنے سے مراد حقیقی اور واقعی طور پر اُترنا نہیں بلکہ مثالی اور ظلّی طور پر اُترنا مراد ہے۔ابتدائے عالم آفرینش سے آج تک اسی طور سے مقدّس لوگ آسمان سے اُترتے رہے ہیں اور مثالی طور پر ہمیشہ یہ کہتے آئے ہیں کہ یہ آدم ثانی آیا ہے اور یہ یوسف ثانی اور یہ ابراہیم ثانی لیکن آدم زاد کا جسم خاکی کے ساتھ آسمان سے اُترنا اب تک کسی نے مشاہدہ نہیں کیا۔پس وہ امر جواصول نظامِ عالم کے برخلاف اور قانون قدرت کے مبائن ومخالف اور تجارب موجودہ و مشہودہ کا ضد پڑ ا ہے ا س کے ماننے کے لئے صرف ضعیف اور متناقضؔ اور رکیک روایتوں سے کام نہیں چل سکتاسو یہ امید مت رکھو کہ سچ مچ اوردرحقیقت تمام دنیا کو حضرت مسیح ابن مریم آسمان سے فرشتوں کے ساتھ اُترتے ہوئے دکھائی دیں گے۔ اگر اسی شرط سے اس پیشگوئی پر ایمان لانا ہے تو پھر حقیقت معلوم ، وہ اُترچکے تو تم ایمان لاچکے ایسا نہ ہو کہ کسی غبارہ (بیلون ) پر چڑھنے والے اور پھر تمہارے سامنے اُترنے والے کے دھوکہ میں آجاؤ۔سو ہوشیار رہنا آئندہ اس اپنے جمے ہوئے خیال کی وجہ سے کسی ایسے اُترنے والے کو ابن مریم نہ سمجھ بیٹھنا۔ یہ قاعد ہ کی بات ہے کہ جو شخص سچ کو قبول نہیں کرتا پھردوسرے وقت میں اس کو جھوٹ قبول کرنا پڑتا ہے۔جن بے سعادت اور بدبخت لوگوں نے ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو قبول نہیں کیا تھا اُنہیں نے مسیلمہ کذّاب کو قبول کر لیا حتّٰی کہ چھ سات ہفتہ کے اندر ہی ایک لاکھ سے زیادہ اس پر ایما ن لے آئے۔سو خدائے تعالیٰ سے ڈرو اور الگ الگ گوشوں میں بیٹھ کر فکر کرو کہ اب تک سُنّت اور عادت الٰہی کس طرح پر چلی آئی ہے۔ اور یہ بھی سوچ لو کہ صحیح حدیثوں میں آسمان سے اُترنے کا بھی کہیں ذکر نہیں اور صرفؔ نزل یا ینزل کا لفظ آسمان سے اُترنے پر
    ۱؂ بنی اسرائیل:۹۴
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 245
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 245
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/245/mode/1up
    ہرگز دلالت نہیں کرتا اوراگر فرض کے طور پر آسمان کا لفظ بھی ہوتا تب بھی ہمارے مطلب کو مضرو مخل نہیں تھا کیونکہ توریت و انجیل میں ایسی آیتیں بہت سی پائی جاتی ہیں جن میں نبیوں کی نسبت لکھا ہے کہ وہ آسمان سے ہی اُترتے ہیں۔ مثلًا یوحناکی انجیل میں حضرت یحییٰ کی طرف سے یہ قول لکھا ہے کہ وہ جو زمین سے آتا ہے وہ زمینی ہے اورزمین سے کہتا ہے وہ جو آسمان سے آتا ہے سب کے اوپر ہے (یعنی نبیوں کا قول دوسرے عقلمندوں کے قول پر مقدّم ہے۔کیونکہ نبی آسمان سے اُترتا ہے ) دیکھو یوحنا باب ۳ آیت ۳۱۔ پھر دوسرا قول یہ ہے۔ میں آسمان پر سے اس لئے نہیں اُترا کہ اپنی مرضی پر چلوں۔یوحنا باب ۶ آیت ۱۱۔ پھر تیسرا قول یہ ہے کہ کوئی آسمان پر نہیں گیا سوائے اُس شخص کے کہ جو آسمان پر سے اُترا۔یوحنا باب ۳ آیت ۱۳۔ اور فقط یہ کہنا کہ ہم نے اُتار ا یا اُترا اس بات پر ہرگز دلالت نہیں کرتا کہ آسمان سے اُتار اگیا ہے کیونکہ قرآن شریف میں یہ بھی * فرمایا گیا ہے کہ ہمؔ نے لوہا اُتار ا اور چار پائے (مویشی ) اُتارے۔
    اب ظاہر ہے کہ یہ تمام مویشی توالد تناسل کے ذریعہ پیدا ہوتے ہیں کسی شخص نے کوئی گھوڑا یا بیل یا گدھا وغیرہ آسمان سے اُترتا کبھی نہیں دیکھا ہو گا حالانکہ اس جگہ صریح لفظ نزول کا موجود ہے اور کوئی شخص اس آیت کو ظاہر پر حمل نہیں کرتا۔پھر جبکہ یہ معلوم ہو گیا کہ خدائے تعالیٰ کی کلام میں ایسے ایسے استعارات و مجازات و کنایات بھی موجود ہیں جن کے ظاہر لفظوں میں صریح اور صاف طورپر فرمایا گیا ہے کہ لوہا اورتمام مویشی
    * حاشیہ: قال اللہ تعالیٰ (۱) 3 ۱؂ سورۃ الحدید الجزو نمبر ۲۷ (۲) 3۲؂ ؂ (۳) 3۔ ۳؂ سورۃ الزمرالجزو نمبر ۲۳ (۱) یعنی ہم نے لوہا اُتارا (۲) اور ہم نے تم پر لباس اُتارا۔ (۳) اور تمہارے لئے چار پائے اُتارے۔ ایسا ہی توریت میں یہ فقرات ہیں۔ ہمارااُترنا بیابان میں۔ گنتی باب ۱۰ آیت ۳۱۔ مجھے یردن کے پار اُترنا نہ ہوگا استثناء باب ۴ آیت ۲۲۔ ہمارے اُترنے کی جگہ ہے۔ پیدائش ۲۴۔ ۲۳۔ اب ان تمام آیات سے ظاہر ہے کہ اُترنے کا لفظ آسمان سے اُترنے پر ہرگز دلالت نہیں کرتا اور اُترنے کے ساتھ آسمان کا لفظ زیادہ کرلینا ایسا ہے جیسا کسی بھوکے سے پوچھاجائے کہ دو او ر دو کتنے ہوتے ہیں تو وہ جواب دے کہ چار روٹیاں۔ منہ

    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 246
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 246
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/246/mode/1up
    ہم نے اُتارے ہیں اورمراداس سے کوئی اور رکھی گئی ہے تو اسؔ سے ظاہر ہے کہ عادت اللہ اسی طرح پر واقع ہے کہ اُترنا کسی چیز کا بیان فرماتا ہے اور اصل مقصود اس اُترنے سے کچھ اورہی ہوتا ہے۔انصاف کرنا چاہیئے کہ کیاحضرت مسیح کا آسمان سے اُترناان آیات کی نسبت زیادہ صفائی سے بیان کیا گیا ہے؟ بلکہ مسیح کا اُترنا صرف بعض حدیثوں کی رو سے خیال کیا جاتا ہے اور حدیثیں بھی ایسی ہیں جن میں آسمان کا ذکر ہی نہیں صرف اُترنا لکھا ہے لیکن گدھوں اور بیلوں کا آسمان سے اُترنا قرآن کریم آپ فرما رہا ہے۔پس سوچ کر دیکھو کہ کس طرف کو ترجیح ہے اگر حضرت مسیح کا آسمان سے اترنا صرف اس لحاظ سے ضروری سمجھا جاتا ہے تو اس سے زیادہ صاف گدھوں اور بیلوں کا اُترنا ہے۔ اگر ظاہر پر ہی ایمان لانا ہے تو پہلے گدھوں اوربیلوں پر ایمان لاؤ کہ وہ حقیقت میں آسمان سے اُترتے ہیں یا اپنا پیچھا چھڑانے کے لئے یوں کروکہ اَنْزَلْنَا کے لفظ کو مضارع استقبال کے معنوں پرحمل کر کے آیت کی اس طرح پر تفسیر کرلو کہ آخری زمانہ میں جب حضرت مسیح آسمان سے اُتریں گے تو ساتھ ہی بہت سے گدھے خاص کر سواری کا گدھا ایسا ہی بہت سے بیل اور گھوڑے اور خچریں اور لوہا بھی آسمان سے اُترے گا تا آیات اورحدیث کی معانی میں پورؔ ی تطبیق ہوجائے ورنہ ہریک شخص اعتراض کرنے کا حق رکھتا ہے کہ قرآن شریف میں کیوں معنے آیات کے ظاہر سے باطن کی طرف پھیرے جاتے ہیں اورحدیثوں میں جو حضرت عیسیٰ کے اُترنے کے بارے میں وہی الفاظ ہیں کیوں اُن کے ظاہری معنے اپنی حد سے بڑھ کر قبول کئے جاتے ہیں حالانکہ قرائن قویہ سے ثابت ہو رہا ہے کہ مسیح جسم کے ساتھ آسمان پر ہرگز نہیں گیا اور نہ آسمان کا لفظ اس آیت میں موجود ہے بلکہ لفظ تو صرف یہ ہے يٰعِيْسٰىۤ اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَىَّ ۱؂ پھردوسری جگہ ہے بَل رَّفَعَهُ اللّٰهُ اِلَيْهِ ۲؂ جس کے یہ معنے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے مسیح کو موت دے کر پھر اپنی طرف اٹھا لیا جیسا کہ یہ عام محاورہ ہے کہ نیک بندوں کی نسبت جب وہ مر جاتے ہیں یہی کہا کرتے ہیں کہ فلاں بزرگ کو خدائے تعالیٰ نے
    ۱؂ اٰل عمران: ۵۶ ۲؂ النساء:۱۵۹
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 247
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 247
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/247/mode/1up
    اپنی طرف اُٹھا لیا ہے جیساکہ آیت ارْجِعِىْ اِلٰى رَبِّكِ ۱؂ اسی کی طرف اشارہ کررہی ہے۔خدائے تعالیٰ تو ہر جگہ موجود ہے اورحاضر ناظر ہے اور جسم اور جسمانی نہیں اور کوئی جہت نہیں رکھتاپھر کیوں کر کہاجائے کہ جو شخص خدائے تعالیٰ کی طر ف اُٹھایا گیاضرور اس کا جسم آسمان میں پہنچ گیا ہو گا۔ یہ بات کس قدر صداقت سے بعید ہے راستباز لوگ روح اور روحانیتؔ کی رو سے خدائے تعالیٰ کی طرف اُٹھائے جاتے ہیں نہ یہ کہ اُن کا گوشت او ر پوست اوراُن کی ہڈیاں خدائے تعالیٰ تک پہنچ جاتی ہیں۔خدائے تعالیٰ خود ایک آیت میں فرماتا ہے لَنْ يَّنَالَ اللّٰهَ لُحُـوْمُهَا وَلَا دِمَآؤُهَا وَلٰـكِنْ يَّنَالُهُ التَّقْوٰى مِنْكُمْ ۲؂ یعنی خدائے تعالیٰ تک گوشت اور خون قربانیوں کا ہرگز نہیں پہنچتا بلکہ اعمال صالحہ کی رُوح جو تقویٰ اور طہارت ہے وہ تمہاری طرف سے پہنچتی ہے۔
    اس تمام تقریر سے ایک سچائی کے طالب کے لئے ایک پوری پوری اطمینان اور تسلّی ملتی ہے کہ جہاں جہاں قرآن شریف اور حدیث میں کسی مجسم چیز کاآسمان سے اتار اجانا لکھا ہے خواہ حضرت مسیح ہیں یا اور چیزیں ،وہ سب الفاظ ظاہر پر ہرگز محمول نہیں ہیں چنانچہ ہمارے علماء بھی ایک مسیح کو باہر نکال کر باقی تمام مقامات میں ظاہر معانی کو باطن کی طرف پھیر لیتے ہیں فقط مسیح کی نسبت کچھ ایسی ضد اورچِڑ ان کی طبیعتوں میں بیٹھ گئی ہے کہ بجُز اس کے راضی نہیں ہوتے کہ اُن کے جسم کو آسمان پر پہنچاویں اورپھر کسی نامعلوم زمانہ میں اُسی جسم کا آسمان سے اُترنا یقین کریں۔
    ہمارؔ ے علماء خدائے تعالیٰ ان کے حال پر رحم کرے ہمارے سیّدومولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کے مرتبہ اورشان کو نہیں دیکھتے کہ سب سے زیادہ خدائے تعالیٰ کا انہیں پر فضل تھا مگر باوجودیکہ آنحضرت کے رفع جسمی کے بارہ میں یعنی اس بارہ میں کہ وہ جسم کے سمیت شب معراج میں آسمان کی طرف اُٹھائے گئے تھے تقریبًا تمام صحابہ کا یہی اعتقاد تھا جیسا کہ مسیح کے اُٹھائے جانے کی نسبت اس زمانہ کے لوگ اعتقادرکھتے ہیں یعنی جسم کے ساتھ اُٹھائے جانااورپھرجسم کے ساتھ اترنا
    ۱؂ الفجر: ۲۹ ۲؂ الحج:۳۸
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 248
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 248
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/248/mode/1up
    لیکن پھر بھی حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا اِس بات کو تسلیم نہیں کرتیں اور کہتی ہیں کہ وہ ایک رویا صالحہ تھی اورکسی نے حضرت عائشہ صدیقہ کا نام نعوذ باللہ مُلحد ہ یا ضالہ نہیں رکھا اور نہ اجماع کے برخلاف بات کرنے سے اُنہیں ٹوٹ کر پڑگئے۔اب اے منصفو! اے حق کے طالبو! اے خدائے تعالیٰ سے ڈرنے والے بندو! اس مقام میں ذرہ ٹھہر جاؤ!!!اورآہستگی اور تدبّر سے خوب غورکرو کہ کیا ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا آسمان پر جسم کے ساتھ چڑھ جانا اور پھر جسم کے ساتھ اُترنا ایسا عقیدہ نہیں ہے جس پر صدر اوّل کا اجماع تھا اوربعض صحابی جو اس اجماع کے مخالف قائل ہوئے کسی نے اُن کی تکفیر نہیں کی۔نہ اُن کا نا مؔ مُلحد اور ضال اور مأوّل مخطی رکھا۔پھر یہ بھی دیکھنا چاہیئے کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا جسمانی معراج کا مسئلہ بالکل مسیح کے جسمانی طورپر آسمان پر چڑھنے اورآسمان سے اُترنے کا ہمشکل ہے اورایک ہمشکل مقدمہ کے بارہ میں بعض صحابہ جلیلہ کا ہماری رائے کے مطابق رائے ظاہرکرنا درحقیقت ایک دوسرے پیرایہ میں ہماری رائے کی تائید ہے یعنی حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے جسمانی معراج کی نسبت انکارکرنا درحقیقت اور درپردہ مسیح کے جسمانی رفع و معراج سے بھی انکار ہے۔سو ہریک ایسے مومن کے لئے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی عظمت اور عزّت مسیح کی عظمت اور عزّت سے برتر اوربہتر سمجھتا ہے طریقِ ادب یہی ہے کہ یہ اعتقادرکھے کہ جو مرتبہ قرب اورکمال کا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جائز نہیں وہ مسیح کے لئے بھی بوجہ اولیٰ جائز نہیں ہوگاکیونکہ جس حالت میں مسلمانوں کا عام طورپر یہ مذہب ہے کہ مسیح ابن مریم آخری زمانہ میں ایک اُمّتی بنکر آئے گا۔ اورمقتدی ہوگا نہ مقتدا یعنی نماز میں۔پس اس صورت میں صاف ظا ہر ہےؔ کہ اس شخص کا درجہ کہ جو آخر اُمّتی بن کر آئے گا اُس دوسرے شخص کے درجہ سے نہایت ہی کمتر اورفروتر ہونا چاہیئے جس کو اُمتی کا نبی اوررسول اورپیشواٹھہرایا گیا ہے یعنی ہمارے سیّد و مولیٰ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ۔اور بڑے تعجب کا مقام ہو گا کہ ایک اُمّتی کی وہ تعریفیں کی جائیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 249
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 249
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/249/mode/1up
    جو اس کے رسول کی نہیں کی گئیں۔اوروہ عظمت اس کو دی جائے جو اس کے رسول کو نہیں دی گئی۔
    اوراگر یہ کہو کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو اُمتی کر کے کہاں پکارا گیا ہے تو میں کہتا ہوں کہ صحیح بخاری کی وہ حدیث دیکھو جس میں اِمَامُکُمْ مِنْکُمْ موجود ہے۔اس میں کچھ شک نہیں کہ منکم کے خطاب کے مخاطب اُمتی لوگ ہیں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے دنیا کے اخیر تک ہوتے رہیں گے۔اب ظاہر ہے کہ جب مخاطب صرف اُمّتی لوگ ہیں اوریہ اُمّتیوں کو خوشخبری دی گئی کہ ابن مریم جو آنیوالا ہے وہ تم میں سے ہی ہو گا اور تم میں سے ہی پیداہوگا تو دوسرے لفظوں میں اس فقرے کے یہی معنے ہوئے کہ وہ ابن مریم جو آنے والا ہے کوئی نبی نہیں ہوگا بلکہ فقط اُمتی لوگوں میں سےؔ ایک شخص ہو گا۔
    اب سوچنا چاہئے کہ اس سے بڑھ کر اس بات کے لئے اورکیا قرینہ ہو گا کہ ابن مریم سے اس جگہ وہ نبی مراد نہیں ہے جس پر انجیل نازل ہوئی تھی کیونکہ نبوّت ایک عطاء غیرمجذوذ ہے اورنبی کا اس عطا سے محروم و بے نصیب کیا جانا ہرگز جائز نہیں اور اگر فرض کر لیں کہ وہ نبی ہونے کی حالت میں ہی آئیں گے اوربحیثیت نبوّت نزول فرمائیں گے توختم نبوت اس کا مانع ہے۔سو یہ قرینہ ایک بڑا بھاری قرینہ ہے بشرطیکہ کسی کے دل و دماغ میں خداداد تقویٰ و فہم موجود ہو۔
    میرے دوست مولوی ابو سعید محمد حسین صاحب اپنے ایک خط میں مجھے لکھتے ہیں کہ اگرآپ کا مثیل موعود ہونا مان لیاجائے تو پھر بخاری و مسلم و دیگر صحاح نکمی و بے کار ہوجائیں گی اور ایک سخت تفرقہ اُمہات مسائل دین میں پڑے گا۔سو اوّل میں ظاہرکرنا چاہتا ہوں کہ یہ میرے دوست وہی مولوی صاحب ہیں کہ جو اپنے اشاعۃ السنۃ نمبر ۷جلدسات ۷میں امکانی طورپر اس عاجز کا مثیل مسیح اورپھر موعودبھی ہونا تسلیم کرچکے ہیں۔کیونکہ براہین احمدیہ میں جسؔ کا مولوی صاحب نے ریویو لکھا ہے ان دونوں دعووں کاذکر ہے یعنی اس عاجز نے براہین میں صاف اورصریح طورپر لکھا ہے کہ یہ عاجز مثیل مسیح ہے اورنیز موعود بھی ہے۔جس کے آنے کاوعدہ قرآن شریف اورحدیث میں روحانی طورپر دیا گیا ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 250
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 250
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/250/mode/1up
    اب مجھے مولوی صاحب کے اس بیان پر کہ اس عاجز کے مثیلِ مسیح ماننے سے صحیح بخاری و صحیح مسلم بے کار ہوجائیں گی دینی عقائد میں ابتری پڑجائے گی سخت تعجب ہے کیونکہ میں نے اَب اِن رسالوں میں کوئی نئی بات تو نہیں لکھی۔یہ تو وہی پُرانی باتیں ہیں جو مَیں اس سے پہلے براہین احمدیہ میں لکھ چکا ہوں جن کی نسبت مولوی صاحب موصوف اپنے ریویو کے معرض بیان میں سکوت اختیارکرکے اس عاجز کی صداقت دعویٰ کی نسبت شہادت دے چکے ہیں۔بلکہ امکانی طورمثیل مسیح ہونا اس عاجز کا اپنے صریح بیان سے تسلیم کر چکے ہیں۔ہاں اس رسالہ میں مَیں نے خدائے تعالیٰ سے علم قطعی و یقینی پاکر براہین احمدیہ کے مضمون سے اس قدر زیادہ لکھا ہے کہ مسیح ابن مریم مثالی اورظلّی وجود کے ساتھ آئے گا نہ وہی اصلی مسیح۔سو میں نے اجماعی عقیدہ کی (اگر اجماع فرض کیا جائے) ایک تفسیر کی ہے نہ اس کے برخلاف کچھ کہا ہے اور مولوی صاحب کو معلوم ہو گا کہ برخلاف اجماع صحابہ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے معراج کے دونوں ٹکڑوں کی نسبت یہی رائے ظاہر کرتی ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم جسم کے ساتھ نہ ؔ بیت المقدس میں گئے نہ آسمان پر بلکہ وہ ایک رؤیا صالحہ تھی۔ اب ظاہر ہے کہ عائشہ صدیقہ کا یہ قول بخاری اورمسلم کا کچھ خلل انداز نہیں ہوا اورنہ صحاح سِتّہ کو اس نے نکما اوربے کار کردیا ۔تو پھر اس عاجز کے اس دعویٰ اوراس الہام سے صحاح سِتّہ کیوں کر نکمّی اوربے کارہوجائیں گی؟ مسیح کا جسم کے ساتھ آسمان پرجانا کہاں ایسا ثابت ہے جیسا کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا سو اے میرے عزیز بھائی اس مقام میں تامّل کر اورجلدی نہ کر
    تامّل کناں درخطا و صواب
    بہ از ژاژ خایانِ حاضر جواب
    اور اگر مولوی صاحب یہ عذر پیش کریں کہ ہم نے اگرچہ اپنے ریویو میں امکانی طورپر مثیل مسیح ہونا آپ کا مان لیا ہے اورایسا ہی ظلّی اورروحانی طورپر مسیح موعود ہونا بھی مان لیا لیکن ہم نے یہ کب مانا ہے کہ آپ بہمہ وجوہ ان پیشگوئیوں کے مصداق کامل ہیں جو مسیح ابن مریم کے بارہ میں صحاح میں موجود ہیں ۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 251
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 251
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/251/mode/1up
    اس عذر کا جواب یہ ہے کہ اس عاجز کی طرف سے بھی یہ دعویٰ نہیں ہے کہ مسیحیت کا میرے وجود پر ہی خاتمہ ہے اورآئندہ کوئی مسیح نہیں آئے گا بلکہ میں تو مانتا ہوں اور بار بار کہتا ہوں کہ ایک کیا دس ہزا ر سےؔ بھی زیادہ مسیح آسکتا ہے اورممکن ہے کہ ظاہری جلال واقبال کے ساتھ بھی آوے اورممکن ہے کہ اوّل وہ دمشق میں ہی نازل ہو۔ مگر اے میرے دوست مجھے اس بات کے ماننے اور قبول کرنے سے معذور تصوّر فرمائیے کہ وہی مسیح ابن مریم جو فوت ہوچکا ہے اپنے خاکی جسم کے ساتھ پھر آسمان سے اُترے گا۔اسلام اگر چہ خدائے تعالیٰ کو قادرمطلق بیان فرماتا ہے اورفرمودۂ خدااوررسول کو عقل پر فوقیت دیتا ہے مگر پھربھی وہ عقل کو معطل اوربے کار ٹھہرانانہیں چاہتا اوراگر صاف اورصریح طورپر کوئی امر خلاف عقل کسی الہامی کتاب میں واقع ہو اور ہم اس کے چاروں طرف نظر ڈال کر اس حقیقت تک پہنچ جائیں کہ دراصل یہ امر خلاف عقل ہے برتراز عقل نہیں تو ہمیں شریعت اورکتاب الٰہی ہرگز اجازت نہیں دیتی کہ ہم اس امر غیر معقول کو حقیقت پر حمل کر بیٹھیں بلکہ قرآن شریف میں ہمیں صاف تاکید فرمائی گئی ہے کہ آیات متشابہات یعنی جن کا سمجھنا عقل پر مشتبہ رہے اُن کے ظاہری معانی پر ہرگز زورنہیں دینا چاہیئے کہ درحقیقت یہی مطلب اورمراد خدائے تعالیٰ کی ہے۔* بلکہ اس پر ایما ن لاناؔ چاہیئے اور اس کی اصل حقیقت کو
    *حاشیہ: بعض لوگ موحدین کے فرقہ میں سے بحوالہ آیات قرآنی یہ اعتقاد رکھتےؔ ہیں کہ حضرت مسیح ابن مریم انواع واقسام کے پرندے بنا کر اور ان میں پھونک مار کر زندہ کر دیا کرتے تھے۔ چنانچہ اسی بناء پر اس عاجز پر اعتراض کیا ہے کہ جس حالت میں مثیل مسیح ہونے کا دعویٰ ہے توپھر آپ بھی کوئی مٹی کا پرندہ بناکر پھر اس کو زندہ کر کے دکھلائیے۔ کیونکہ جس حالت میں حضرت مسیح کے کروڑہا پرندے بنائے ہوئے ابتک موجود ہیں جو ہر طرف پرواز کرتے نظر آتے ہیں تو پھر مثیل مسیح بھی کسی پرندہ کا خالق ہونا چاہیئے۔
    ان تمام اوہام باطلہ کا جواب یہ ہے کہ وہ آیات جن میں ایسا لکھا ہے متشابہات میں سے ہیں اور ان کے یہ معنے کرنا کہ گویا خداتعالیٰ نے اپنے ارادہ اور اذن سے حضرت عیسیٰ کو صفات خالقیت میں شریک کر رکھا تھا صریح الحاد اور سخت بے ایمانی ہے کیونکہ اگر خدائے تعالےٰ اپنی ؔ صفات خاصۂ الوہیت بھی دوسروں کو دے سکتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 252
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 252
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/252/mode/1up
    حوالہ بخداکردینا چاہیئے۔اب دیکھو کہ یہ خدائے تعالیٰ کی طرف سے ایک ایسی کامل تعلیم ہے کہ اُسی کی برکت سے ہم ہزارہا ایسے جھگڑوں سے نجات پاسکتے ہیں جو قصصِ ماضیہ یا پیشگوئیوں کی نسبت اس زمانہ میں پیداہورہے ہیں کیونکہ ہر یک اعتراض خلاف عقلؔ معنے کو حقیقت پر حمل کرنے سے پیداہوتا ہے۔ پس جبکہ ہم نے اس ضد کو ہی چھوڑ دیا اوراپنے مولیٰ کی ہدایت کے موافق تمام متشابہات میں جن کا سمجھنا عقل پر مشتبہ رہتا ہے یہی اصول مقرر کر رکھا کہ اُن پر اجمالی طورپر ایمان لاویں اوراُن کی اصل حقیقت حوالہ بخدا کریں تو پھرؔ اعتراض کے لئے کوئی بنیاد پیدانہیں ہو سکتی مثلًا ایک صحیح حدیث میں یہ لکھا ہو کہ اگر دس اور دس کو جمع کریں تو وہ بیس ۲۰
    بقیہ حاشیہ:
    تو اس سے اس کی خدائی باطل ہوتی ہے اور موحد صاحب کا یہ عذر کہ ہم ایسا اعتقاد نہیں رکھتے کہ اپنی ذاتی طاقت سے حضرت عیسیٰ خالق طیور تھے بلکہ ہمارا عقیدہ یہ ہے کہ یہ طاقت خدا ئے تعالیٰ نے اپنے اذن اور ارادہ سے اُن کو دے رکھی تھی اور اپنی مرضی سے ان کو اپنی خالقیت کا حصہ دار بنا دیاتھا اور یہ اسکو اختیار ہے کہ جس کو چاہے اپنا مثیل بنا دیو ے قادر مطلق جو ہوا۔ یہ سراسر مشرکانہ باتیں ہیں اور کفر سے بدتر۔اس موحدکو یہ بھی کہا گیا کہ کیا تم اب شناخت کر سکتے ہو کہ ان پرندوں میں سے کونسے ایسے پرندے ہیں جو خدائے اتعالیٰ کے بنائے ہوئے ہیں اورکون سے ایسے پرندے ہیں جو اُن پرندوں کی نسلؔ ہیں جن کے حضرت عیسیٰ خالق ہیں؟تو اس نے اپنے ساکت رہنے سے یہی جواب دیا کہ میں شناخت نہیں کر سکتا۔
    اب واضح رہے کہ اس زمانہ کے بعض موحدین کا یہ اعتقاد کہ پرندوں کے نوع میں سے کچھ تو خدائے تعالےٰ کی مخلوق اور کچھ حضرت عیسیٰ کی مخلوق ہے۔ سراسر فاسد اور مشرکانہ خیال ہے اور ایسا خیال رکھنے والا بلا شبہ دائرہ اسلام سے خارج ہے۔ اور یہ عذر کہ ہم حضرت عیسیٰ کو خدا تو نہیں مانتے بلکہ یہ مانتے ہیں کہ خدا ئے تعالےٰ نے بعض اپنی خدائی کی صفتیں انکو عطا کر دی تھیں نہایت مکروہ اور باطل عذر ہے۔ کیونکہ اگرخدائے تعالیٰ اپنے اذن اور ارادہ سے اپنی خدائی کی صفتیں بندوں کو دے سکتا ہے تو بلاشبہ وہ اپنی ساری صفتیں خدائی کی ایک بندے کودے کر پور اخدابنا سکتاہے۔ پس اس صورتؔ میں مخلوق پرستوں کے کل مذاہب سچے ٹھہرجائیں گے۔ اگرخداتعالیٰ کسی بشرکواپنے اذن اور ارادہ سے خالقیت کی صفت عطا کر سکتا ہے تو پھر وہ اس طرح کسی کو اذن اور ارادہ سے اپنی طرح عالم الغیب بھی بنا سکتا ہے اور اس کو ایسی قوت بخش سکتا ہے جو خدائے تعالے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 253
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 253
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/253/mode/1up
    نہیں بلکہ پندرہ ہوں گے تو ہمیں کیا ضرورت ہے کہ اس حدیث کے مضمو ن کو حقیقت پر حمل کر بیٹھیں اورناحق بیجا ضد کرنے سے مخالفوں سے ہنسی ؔ کرائیں۔ہمارے لئے قرآن کی تعلیم سے یہ راہ کھلی ہے کہ ہم اس حدیث کو متشابہات میں داخل کریں اورفتنہ سے اپنے تئیں بچاویں لیکن اگر ہم علم میں ایسے راسخ کئے جائیں جو الہامی طورپر ہمیں وہ معقولی راہ دکھلائی جاوے جس سے لوگ مطمئن ہوؔ سکتے ہیں تو پھر کچھ ضرورت نہیں کہ ہم ایسی آیت یا حدیث کو متشابہات میں داخل رکھیں بلکہ اُن معقولی معنوں کو جو الہام کے ذریعہ سے ظاہر ہوئے ہیں شکر کے ساتھ ہم قبول کرلیں گے۔
    بقیہ حاشیہ: کی طرح ہر جگہ حاضر ناظر ہو اور ظاہر ہے کہ اگر خدائی کی صفتیں بھی بندوں میں تقسیم ہوسکتی ہیں تو پھر خدائے تعالےٰ کا وحدہ‘ لاشریک ہونا باطل ہے۔ جس قدر دنیا میں مخلوق پرست ہیں وہ بھی یہ تو نہیں کہتے کہ ہمارے معبود خداہیں بلکہ ان موحدوں کی طرح ان کا بھی درحقیقت یہی قول ہے کہ ہمارے معبودوں کو خدائے تعالیٰ نے خدائی کی طاقتیں دے رکھی ہیں۔ ربّ اعلیٰ وبرتر تو وہی ہے اور یہ صرف چھوٹے چھوٹے خدا ہیں۔ تعجب کہ یہ لوگ یا رسول اللہ کہنا شرک کا کلمہ سمجھ کر منعؔ کرتے ہیں لیکن مریم کے ایک عاجز بیٹے کو خدائی کا حصہ دار بنا رہے ہیں۔ بھائیو! آپ لوگوں کا دراصل یہی مذہب ہے کہ خدائی بھی مخلوق میں تقسیم ہو سکتی ہے اور خدائے تعالیٰ جس کو چاہتاہے اپنی صفت خالقیت ورازقیت وعا لمیت وقادریت وغیرہ میں ہمیشہ کے لئے شریک کر دیتا ہے تو پھر آپ لوگوں نے اپنے بدعتی بھائیوں سے اس قدر جنگ وجدل کیوں شروع کر رکھی ہے وہ بیچارے بھی تو اپنے اولیاء کو خدا کر کے نہیں مانتے صرف یہی کہتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے اپنے اذن اور ارادہ سے کچھ کچھ خدائی طاقتیں انہیں دے رکھی ہیں اور انہیں طاقتوں کی وجہ سے جو باذن الٰہی انکو حاصل ہیں وہ کسی کو بیٹا دیتے ہیں اور کسی کو بیٹی۔ اور ہر جگہ حاضر وناظر ہیں۔ نذریں نیاز یں لیتے ہیں۔اور مرادیں دیتے ہیں۔ ابؔ اگر کوئی طالبِ حق یہ سوال کرے کہ اگر ایسے عقائد سراسر باطل اور مشرکانہ خیالات ہیں تو ان آیات فرقانیہ کے صحیح معنے کیا ہیں جن میں لکھا ہے کہ مسیح ابن مریم مٹی کے پرندے بناکر پُھونک اُن میں مارتا تھا تو وہ باذن الٰہی پرندے ہوجاتے تھے۔
    سو واضح ہو کہ انبیاء کے معجزات دو قسم کے ہوتے ہیں۔(۱) ایک وہ جو محض سماوی امورہوتے ہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 254
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 254
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/254/mode/1up
    اوراگر یہ کہا جاوے کہ قرآن شریف کے ایسے معنے کرنا کہ جوؔ پہلوں سے منقول نہیں ہیں الحاد ہے جیسے مولوی عبدالرحمان صاحبزادہ مولوی محمد لکھو والہ نے اس عاجز کی نسبت لکھا ہے تو میں کہتا ہوں کہ میں نے کوئی ایسے اجنبی معنے نہیں کئے جو مخالف اُن معنوں کے ہوں جن پر صحابہ کرام اورتابعین اورتبع تابعین کا اجما ع ہوؔ اکثر صحابہ مسیح کا فوت ہوجانا مانتے رہے ، دجّال معہود کا فوت ہوجانا مانتے رہے پھر مخالفانہ اجماع کہاں سے ثابت ہو قرآن شریف میں تیس کے قریب ایسی شہادتیں ہیں جو مسیح ابن مریم کے فوت ہونے پر دلالت بیّن کررہی ہیں غرض یہ بات کہ مسیح جسم خاکی کے سا تھؔ آسمان پر چڑھ گیا اوراسی جسم کے ساتھ اُترے گا نہایت لغو
    بقیہ حاشیہ: جن میں انسان کی تدبیراور عقل کو کچھ دخل نہیں ہوتا جیسے شق القمر جو ہمارے سیّد ومولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا معجزہ تھا اور خدائے تعالیٰ کی غیر محدود قدرت نے ایک راستباز اور کامل نبی کی عظمت ظاہر کرنے کے لئے اس کو دکھایاتھا۔ (۲) دوسرے عقلی معجزات ہیں جو اس خارق عادت عقل کے ذریعہ سے ظہور پذیر ہوتے ہیں جو الہام الٰہی سے ملتی ہے جیسے حضرؔ ت سلیمان کا وہ معجزہ جو صَرْحٌ مُّمَرَّدٌ مِّنْ قَوَارِيْرَ ۱؂ ہے جس کو دیکھ کر بلقیس کو ایمان نصیب ہوا۔
    اب جانناچاہیئے کہ بظاہر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ حضرت مسیح کا معجزہ حضرت سلیمان کے معجزہ کی طرح صرف عقلی تھا۔ تاریخ سے ثابت ہے کہ اُن دنوں میں ایسے امور کی طرف لوگوں کے خیالات جھکے ہوئے تھے کہ جو شعبدہ بازی کی قسم میں سے اور در اصل بے سود اور عوام کر فریفتہ کرنے والے تھے۔ وہ لوگ جو فرعون کے وقت میں مصر میں ایسے ایسے کام کرتے تھے جو سانپ بنا کر دکھلادیتے تھے اور کئی قسم کے جانور طیارکر کے ان کو زندہ جانوروں کی طرح چلادیتے تھے۔ وہ حضرت مسیح کے وقت میں عام طور پر یہودیوں کے ملکوں میں پھیل گئے تھے اور یہودیوں نے اُن کے بہت سے ساحرؔ انہ کام سیکھ لئے تھے جیسا کہ قرآن کریم بھی اس بات کا شاہد ہے۔ سو کچھ تعجب کی جگہ نہیں کہ خدائے تعالےٰ نے حضرت مسیح کو عقلی طور سے ایسے طریق پر اطلاع دے دی ہو جو ایک مٹی کا کھلونا کسی کل کے دبانے یاکسی پھونک مارنے کے طور پر ایسا پرواز کرتا ہو جیسے پرندہ پرواز کرتا ہے یا اگر پرواز نہیں تو پَیروں سے چلتا ہو۔ کیونکہ حضرت مسیح ابن مریم اپنے باپ یوسف کے ساتھ بائیس ۲۲ برس کی مدّت تک
    ۱؂ النمل:۴۵
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 255
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 255
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/255/mode/1up
    اوربے اصل بات ہے صحابہ کاہرگز اس پر اجماع نہیں۔ بھلا اگر ہے تو کم سے کم تین سو یا چارسو صحابہ کا نام لیجئے جو اس بارہ میں اپنی شہادت اداکرگئے ہیں ورنہ ایک یا دوآدمی کے بیان کانام اجماع رکھنا سخت بددیاؔ نتی ہے۔ماسوااس کے یہ بھی ان حضرات کی سراسر غلطی ہے کہ قرآن کریم کے معانی کو بزمانہ گذشتہ محدود و مقید سمجھتے ہیں۔اگر اس خیال کو تسلیم کرلیا جاوے توپھر قرآن شریف معجزہ نہیں رہ سکتا اوراگر ہو بھی تو شاید ان عربیوں کے لئے جو بلاغت شناسی کا مذاق رکھتے ہیں۔
    جا ؔ ننا چاہیئے کہ کھلا کھلا اعجازقرآن شریف کا جو ہرایک قوم اور ہریک اہل زبان پر روشن
    بقیہ حاشیہ : نجاری کا کام بھی کرتے رہے ہیں اور ظا ہر ہے کہ بڑھئی کاکام درحقیقت ایک ایسا کام ہے جس میں کلوں کے ایجاد کرنے اور طرح طرح کی صنعتوں کے بنانے میں عقل تیز ہوجاتی ہے اور جیسے انسان میں قوےٰ موجود ہوں انہیں کے موافق اعجاز کے طور پر بھی مدد ملتی ہے جیسے ہمارے سیّد ومولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے روحاؔ نی قویٰ جو دقائق اور معارف تک پہنچنے میں نہایت تیز وقوی تھے سو انہی کے موافق قرآن شریف کا معجزہ دیا گیاجو جامع جمیع دقائق ومعارف الٰہیہ ہے۔ پس اس سے کچھ تعجب نہیں کرنا چاہیئے کہ حضرت مسیح نے اپنے داد ا سلیمان کی طرح اس وقت کے مخالفین کو یہ عقلی معجزہ دکھلایا ہو اور ایسا معجزہ دکھانا عقل سے بعید بھی نہیں کیونکہ حال کے زمانہ میں بھی دیکھاجاتا ہے کہ اکثر صنّاع ایسی ایسی چڑیاں بنا لیتے ہیں کہ وہ بولتی بھی ہیں اور ہلتی بھی ہیں اور دُم بھی ہلاتی ہیں اور میں نے سُنا ہے کہ بعض چڑیاں کَلْ کے ذریعہ سے پرواز بھی کرتی ہیں۔ بمبئی اور کلکتہ میں ایسے کھلونے بہت بنتے ہیں اور یوروپ اور امریکہ کے ملکوں میں بکثرت ہیں اور ہرسال نئے نئے نکلتے آتے ہیں۔ اور چونکہ قرآن شریف اکثر استعارات سے بھرا ہوا ہے اس لئے ان آیات کے روحانی طور پر معنی بھی کرسکتے ہیں کہ مٹی کی چڑیوں سے مراد وہ اُمّی اور نادان لوگ ہیں جن کو حضرت عیسیٰ نے اپنا رفیق بنایا گویا اپنی صحبت میں لے کر پرندوں کی صورت کا خاکہ کھینچا پھر ہدایت کی روح اُن میں پھونک دی جس سے وہ پرواز کرنے لگے۔
    ماسوؔ ا اس کے یہ بھی قرین قیاس ہے کہ ایسے ایسے اعجاز طریق عمل التِّرب یعنی مسمریزمی طریق
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 256
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 256
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/256/mode/1up
    ہوسکتا ہے جس کو پیش کر کے ہم ہریک ملک کے آدمی کو خواہ ہندی ہو یا پارسی یا یوروپین یا امریکن یا کسی اَورملک کا ہو ملزم و ساکت و لاجواب کرسکتے ہیں۔وہ غیرمحدود معار ؔ ف و حقائق و علوم حکمیہ قرآنیہ ہیں جو ہر زمانہ میں اس زمانہ کی حاجت کے موافق کھلتے جاتے ہیں اورہر یک زمانہ کے خیالات کو مقابلہ کرنے کے لئےُ مسلّح سپاہیوں کی طرح کھڑے ہیں اگر قرآ ن شریف اپنے حقائق و دقائق کے لحاظ سے ایک محدود چیزہوتی تو ہرگز و ہؔ معجزہ تامّہ نہیں ٹھہر سکتا تھا ۔فقط بلاغت و فصاحت ایسا امر نہیں ہے جس کی اعجازی کیفیت ہریک خواندہ ناخواندہ کو معلوم ہوجائے کھلا کھلا اعجاز اس کا تو یہی ہے کہ وہ غیر محدود معارف و دقائق
    بقیہ حاشیہ : سے بطور لہو ولعب نہ بطور حقیقت ظہور میں آسکیں کیونکہ عمل التِّرب میں جس کو زمانۂ حال میں مسمریزم کہتے ہیں ایسے ایسے عجائبات ہیں کہ اس میں پوری پوری مشق کرنے والے اپنی روح کی گرمی دوسری چیزوں پر ڈال کر ان چیزوں کو زندہ کے موافق کردکھاتے ہیں۔ انسان کی روح میں کچھ ایسی خاصیت ہے کہ وہ اپنی زندگی کی گرمی ایک جماد پر جو بالکل بے جان ہے ڈال سکتی ہے۔ تب جماد سے وہ بعض حرکات صادر ہوتی ہیں جو زندوں سے صادر ہؤا کرتی ہیں۔ راقم رسالہ ہذا نے اس علم کے بعض مشق کرنے والوں کو دیکھا ہے جو انہوں نے ایک لکڑی کی تپائی پر ہاتھ رکھ کر ایسا اپنی حیوانی روحؔ سے اُسے گرم کیا کہ اس نے چارپایوں کی طرح حرکت کرنا شروع کر دیا اور کتنے آدمی گھوڑے کی طرح اس پر سوا ر ہوئے اور اسکی تیزی اور حرکت میں کچھ کمی نہ ہوئی۔ سو یقینی طور پر خیال کیاجاتا ہے کہ اگر ایک شخص اس فن میں کامل مشق رکھنے والا مٹی کا ایک پرند بنا کر اس کو پرواز کرتا ہؤا بھی دکھا دے تو کچھ بعید نہیں کیونکہ کچھ اندازہ نہیں کیا گیا کہ اس فن کے کما ل کی کہاں تک انتہاء ہے۔ اور جبکہ ہم بچشم خود دیکھتے ہیں کہ اس فن کے ذریعہ سے ایک جماد میں حرکت پیدا ہوجاتی ہے اور وہ جانداروں کی طرح چلنے لگتا ہے تو پھر اگر اس میں پرواز بھی ہو تو بعید کیا ہے۔ مگر یاد رکھنا چاہیئے کہ ایسا جانور جو مٹی یالکڑی وغیرہ سے بنایا جاوے اور عمل التِّرب سے اپنی روح کی گرمی اس کو پہنچائی جاؔ ئے وہ درحقیقت زندہ نہیں ہوتا بلکہ بدستور بے جان اور جماد ہوتا ہے صرف عامل کے روح کی گرمی بارُوت۱؂ کی طرح اُس کو جنبش میں لاتی ہے۔ اور یہ بھی یاد رکھنا چاہیئے کہ ان پرندوں کا پرواز کرنا قرآن شریف سے
    ۱؂ اسے آجکل ’’بارود‘‘ لکھا جاتا ہے (ناشر)
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 257
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 257
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/257/mode/1up
    اپنے اندر رکھتا ہے۔ جو شخص قرآن شریف کے اس اعجاز کو نہیں مانتا و ہؔ علمِ قرآن سے سخت بے نصیب ہے ومن لم یؤمن بذالک الاعجاز فواللہ ما قدرالقر آن حق قدرہ وما عرف اللّٰہ حق معرفتہ وماؔ وقر الرسول حق توقیرہ۔
    اے بندگانِ خدا !یقینایاد رکھو کہ قرآن شریف میں غیر محدود معارف و حقا ئق کا اعجاز ایسا کامل اعجاز ہے جس نے ہرایک زمانہ میں تلوار سے زیادہ کام کیا ہے اور ہر یک زمانہ اپنی نئی حا لت کےؔ ساتھ جو کچھ شبہات پیش کر تا ہے یا جس قسم کے اعلیٰ معارف کا دعویٰ کرتا ہے اس کی پوری مدافعت اور پورا الزام اور پورا پورا مقا بلہ قر آن شریف میں موجود ہے کو ئی شخص
    بقیہ حاشیہ : ہرگز ثابت نہیں ہوتا بلکہ ان کا ہلنا اور جنبش کرنا بھی بپایہ ثبوت نہیں پہنچتا اورنہ درحقیقت ان کا زندہ ہوجانا ثابت ہوتا ہے۔ اس جگہ یہ بھی جاننا چاہیئے کہ سلبِ امراض کرنا یا اپنی روح کی گرمی جماد میں ڈال دینا درحقیقت یہ سب عمل التِّرب کی شاخیں ہیں۔ ہر یک زمانہ میں ایسے لوگ ہوتے رہے ہیں اور اب بھی ہیں جو اس روحانی عمل کے ذریعہ سے سلبِ امراض کرتے رہے ہیں اور مفلوج ، مبروص، مدقوق وغیرہ ان کی توجہ سے اچھے ہوتے رہے ہیں۔جن لوگوں کی معلومات وسیعؔ ہیں وہ میرے اس بیان پر شہادت دے سکتے ہیں کہ بعض فقراء نقشبندی وسُہر وردی وغیرہ نے بھی ان مشقوں کی طرف بہت توجہ کی تھی اور بعض ان میں یہاں تک مشّاق گذرے ہیں کہ صدہا بیماروں کو اپنے یمین ویسا ر میں بٹھا کر صرف نظرسے اچھا کر دیتے تھے اور محی الدین ابن عربی صاحب کو بھی اس میں خاص درجہ کی مشق تھی۔ اولیاء اور اہل سلوک کی تواریخ اور سوانح پر نظر ڈالنے سے معلوم ہوتا ہے کہ کاملین ایسے عملوں سے پرہیز کرتے رہے ہیں مگر بعض لوگ اپنی ولایت کا ایک ثبوت بنانے کی غرض سے یا کسی اور نیت سے ان مشغلوں میں مبتلا ہوگئے تھے۔ اور اب یہ بات قطعی اور یقینی طور پر ثابت ہو چکی ہے کہ حضرت مسیح ابن مریم باذن وحکم الٰہی الیسع نبی کی طرح اسؔ عمل التِّرب میں کمال رکھتے تھے گو الیسع کے درجہ کاملہ سے کم رہے ہوئے تھے۔ کیونکہ الیسع کی لاش نے بھی معجزہ دکھلایا کہ اس کی ہڈیوں کے لگنے سے ایک مردہ زندہ ہوگیا مگر چوروں کی لاشیں مسیح کے جسم کے ساتھ لگنے سے ہرگز زندہ نہ ہوسکیں۔ یعنی وہ دو چور جو مسیح کے ساتھ مصلوب ہوئے تھے۔ بہرحال مسیح کی یہ تربی کارروائیاں زمانہ کے مناسب حال بطور خاص مصلحت کے تھیں۔مگر یاد رکھنا چاہیئے کہ یہ عمل ایسا قدر کے لائق نہیں۔ جیسا کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 258
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 258
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/258/mode/1up
    برہمو یا بدھ مذہب والا یا آریہ یا کسی اور رنگ کا فلسفی کو ئی ایسی الٰہی صداقت نکال نہیں سکتا جو ؔ قرآن شریف میں پہلے سے موجود نہ ہو۔قرآن شریف کے عجائبات کبھی ختم نہیں ہو سکتے اور جس طرح صحیفۂ فطرت کے عجائب و غرائب خواص کسی پہلے زمانہ تک ختم نہیں ہو چکے بلکہ جدید درجدید پیدا ہوتے جاتے ہیں یہی حال ان صحفِ مطہرّہ کا ہے تا خدائے تعالیٰ کے قول اور فعل میں مطابقت ثابت ہو اورمیَں اس سے پہلے لکھ چکا ہوں کہ قرآن شریف کے عجائبات اکثر بذریعہ الہام میرے پر کھلتے ر ہتے ہیںؔ اور اکثر ایسے ہو تے ہیں کہ تفسیروں میں اُن کا نام و نشان نہیں پایا جاتا۔مثلاًیہ جو اس عاجز پر کھلا ہے کہ ابتدائے خلقتِ آدم سے جس قدر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم
    بقیہ حاشیہ : عوام الناس اس کو خیال کرتے ہیں۔ اگر یہ عاجز اس عمل کومکروہ اور قابل نفرت نہ سمجھتا توخدا تعالیٰ کے فضل وتوفیق سے امید قوی رکھتا تھا کہ ان اعجوبہ نمائیوں میں حضرت مسیح ابن مریم سے کم نہ رہتا۔ لیکن مجھے وہ روحانی طریق پسند ہے جس پر ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نےؔ قدم مارا ہے اورحضرت مسیح نے بھی اس عمل جسمانی کو یہودیوں کے جسمانی اور پست خیالات کی وجہ سے جو ان کی فطرت میں مرکوزتھے باذن وحکم الٰہی اختیار کیاتھا ورنہ دراصل مسیح کو بھی یہ عمل پسند نہ تھا۔ واضح ہو کہ اس عمل جسمانی کا ایک نہایت بُراخاصہ یہ ہے کہ جوشخص اپنے تئیں اس مشغولی میں ڈالے اورجسمانی مرضوں کے رفع دفع کرنے کے لئے اپنی دلی ودماغی طاقتوں کو خرچ کرتا رہے وہ اپنی اُن روحانی تاثیروں میں جو روح پر اثر ڈال کر روحانی بیماریوں کو دورکرتی ہیں بہت ضعیف اور نکماہوجاتا ہے اور امر تنویر باطن اور تزکیہ نفوس کاجو اصل مقصد ہے اس کے ہاتھ بہت کم انجام پذیر ہوتا ہے یہی وجہ ہے کہ گوحضرت مسیح جسمانی بیماروں کو اس عمل کے ذریعہ سے اچھا کرتے رہے مگر ہدایت اورتوحید اور دینیؔ استقامتوں کے کامل طور پر دلوں میں قائم کرنے کے بارے میں انکی کارروائیوں کا نمبر ایسا کم درجہ کارہا کہ قریب قریب ناکام کے رہے لیکن ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے چونکہ ان جسمانی امور کی طرف توجہ نہیں فرمائی اور تمام زور اپنی روح کادلوں میں ہدایت پیدا ہونے کیلئے ڈالا اسی وجہ سے تکمیل نفوس میں سب سے بڑھ کر رہے اور ہزارہا بندگانِ خدا کو کمال کے درجہ تک پہنچادیا اوراصلاح خلق اوراندرونی تبدیلیوں میں وہ یدِ بیضا دکھلایا کہ جس کی ابتدائے دنیا سے آج تک نظیر نہیں پائی جاتی۔ حضرت مسیح کے عمل التِّرب سے وہ مردے جو زندہ ہوتے تھے یعنی وہ قریب المرگ آدمی جو گویانئے سرے زندہ ہوجاتے تھے وہ بلاتوقف
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 259
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 259
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/259/mode/1up
    کے زمانہ بعثت تک مدّت گزری تھی وہ تمام مدت سورۃ والعصر کے اعداد حروف میں بحساب قمری مندرج ہے یعنی چار ہزار سات سو چالیس ۴۷۴۰۔ اب بتلاؤکہؔ یہ دقائق قرآنیہ جس میں قر آن کریم کا اعجاز نمایا ں ہے کس تفسیر میں لکھے ہیں۔ ایسا ہی خدائے تعالیٰ نے میرے پر یہ نکتہ معارف قرآنیہ کا ظاہر کیاکہ اِنَّا اَنْزَلْنٰهُ فِىْ لَيْلَةِ الْقَدْرِۚ ۱؂ کے صرف یہی معنے نہیں کہ ایک بابرکت رات ہے جس میں قرآن شریف اُترا بلکہ باوجودا ؔ ن معنوں کے جو بجائے خود صحیح ہیں اس آیت کے بطن میں دوسرے معنے بھی ہیں جو رسالہ فتح اسلام میں درج کئے گئے ہیں۔اب فرمائیے کہ یہ تمام معارفِ حقہ کس تفسیر میں موجود ہیں اور یہ بھی یاد رکھیں کہ قرآن شریف کے ایک معنے کے ساتھ
    بقیہ حاشیہ : چند منٹ میں مرجاتے تھے کیونکہ بذریعہ عملؔ التِّرب روح کی گرمی اور زندگی صرف عارضی طور پران میں پیدا ہوجاتی تھی مگر جن کوہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے زندہ کیا وہ ہمیشہ زندہ رہیں گے اور یہ جو میں نے مسمریزمی طریق کا عمل التِّرب نام رکھا جس میں حضرت مسیح بھی کسی درجہ تک مشق رکھتے تھے یہ الہامی نام ہے اور خدا ئے تعالےٰ نے مجھ پر ظاہر کیا کہ یہ عمل الترب ہے اوراس عمل کے عجائبات کی نسبت یہ الہام ہؤا ھٰذا ھو الترب الذی لایعلمون یعنی یہ وہ عمل الترب ہے جس کی اصل حقیقت کی زمانہ حال کے لوگوں کوکچھ خبر نہیں۔ ورنہ خدائے تعالیٰ اپنی ہر یک صفت میں واحد لاشریک ہے اپنی صفات الوہیت میں کسی کو شریک نہیں کرتا۔ فرقان کریم کی آیات بیّنات میں اس قدر اس مضمون کی تاکید پائی جاتی ہے جوؔ کسی پر مخفی نہیں جیسا کہ وہ عزّا سمہ‘ فرماتا ہے
    الَّذِىْ لَهٗ مُلْكُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَلَمْ يَتَّخِذْ وَلَدًا وَّلَمْ يَكُنْ لَّهٗ شَرِيْكٌ فِىْ الْمُلْكِ وَخَلَقَ كُلَّ شَىْءٍ فَقَدَّرَهٗ تَقْدِيْرًا‏
    وَاتَّخَذُوْا مِنْ دُوْنِهٖۤ اٰلِهَةً لَّا يَخْلُقُوْنَ شَيْـًٔـا وَّهُمْ يُخْلَقُوْنَ وَلَا يَمْلِكُوْنَ لِاَنْفُسِهِمْ ضَرًّا وَّلَا نَفْعًا وَّلَا يَمْلِكُوْنَ مَوْتًا وَّلَا حَيٰوةً وَّلَا نُشُوْرًا ۲؂ سورۃالفرقان الجزو۱۸یعنی خدا وہ خدا ہے جو تمام زمین وآسمان کا اکیلامالک ہے کوئی اس کا حصہ دار نہیں۔ اس کا کوئی بیٹا نہیں اور نہ اس کے ملک میں کوئی اُس کا شریک اور اسی نے ہر ایک چیز کو پیدا کیا اور پھر ایک حد تک اس کے جسم اور اس کی طاقتوں اوراس کی عمر کو محدود کر دیا اور مشرکوں نے بجز اس خدائے حقیقی کے اَور اَور ایسے ایسے خدا مقررکر رکھے ہیں جو کچھ بھی پیداؔ نہیں کرسکتے بلکہ آپ پیداشدہ اور مخلوق ہیں اپنے ضرر اور نفع کے مالک نہیں ہیں اورنہ موت اور زندگی اورجی اُٹھنے کے مالک ہیں
    ۱؂ القدر ۲ ۲؂ الفرقان: ۳، ۴‏
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 260
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 260
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/260/mode/1up
    اگردوسرے معنی بھی ہوں تو ان دونو ں معنوؔ ں میں کوئی تناقض پیدا نہیں ہوتا اور نہ ہدایتِ قرآنی میں کوئی نقص عائد حال ہو تا ہے بلکہ ایک نور کے ساتھ دوسرا نور مل کر عظمت فرقانی کی روشنی نمایاں طور پردکھائی دیتی ہے اور چونکہ زمانہ غیر محدود انقلابات کی وجہ سے غیر محدود خیالات کا بالطبع محرک ہے لہذ ا اسؔ کا نئے پیرایہ میں ہوکر جلوہ گر ہونا یا نئے نئے علوم کو بمنصۂ ظہور لانا نئے نئے بد عات اور مُحدثات کو دکھلا نا ایک ضروری امر اس کے لئے پڑاہوا ہے۔اب اس حالت میں ایسی کتاب جو خاتم الکتب ہو نے کا دعوٰی کر تی ہے اگر زمانہ کے ہر یک رنگ کے ساتھ مناسب حال اس کا تدارک نہؔ کرے تو وہ ہرگز خاتم الکتب نہیں
    بقیہ حاشیہ : اب دیکھو خدا ئے تعالیٰ صاف صاف طور پر فرما رہا ہے کہ بجُز میرے کوئی اور خالق نہیں بلکہ ایک دوسری آیت میں فرماتا ہے کہ تمام جہان مل کر ایک مکھی بھی پیدا نہیں کرسکتا۔ اورصاف فرماتا ہے کہ کوئی شخص موت اورحیات اورضرر اور نفع کا مالک نہیں ہوسکتا۔ اس جگہ ظاہر ہے کہ اگر کسی مخلوق کو موت اور حیات کا مالک بنادینااور اپنی صفات میں شریک کر دینا اس کی عادت میں داخل ہوتا تو وہ بطور استثناء ایسے لوگوں کو ضرور باہر رکھ لیتا اور ایسی اعلیٰ توحید کی ہمیں ہرگز تعلیم نہ دیتا۔ اگر یہ وسواس دل میں گذرے کہ پھر اللہ جلَّشانہ‘ نے مسیح ابن مریم کی نسبت اس قصہ میں جہاں پرندہؔ بنانے کا ذکر ہے تخلقکالفظ کیوں استعمال کیا جس کے بظاہریہ معنے ہیں کہ تُو پیدا کرتاہے ؟ اس کا جواب یہ ہے کہ اس جگہ حضرت عیسیٰ کو خا لق قرار دینا بطور استعارہ ہے جیسا کہ اس دوسری آیت میں فرمایا ہے فَتَبٰرَكَ اللّٰهُ اَحْسَنُ الْخٰلِقِيْنَ ۱؂ بلا شبہ حقیقی اور سچا خالق خدائے تعالےٰ ہے۔ اور جولوگ مٹی یالکڑی کے کھلونے بناتے ہیں وہ بھی خالق ہیں مگر جھوٹے خالق جن کے فعل کی اصلیت کچھ بھی نہیں۔
    اور اگر یہ کہا جائے کہ کیوں بطور معجزہ جائز نہیں کہ حضرت مسیح علیہ السلام اذن اورارادہ الٰہی سے حقیقت میں پرندے بنا لیتے ہوں اور وہ پرندے ان کی اعجازی پھونک سے پرواز کر جاتے ہوں تو اس کا جواب یہ ہے کہ خدائے تعالیٰ اپنے اذن اور ارادہ سے کسی شخص کو موت اور حیات اور ضرر اور نفع کا مالک نہیں بناتا۔ نبی لوگ دعا اور تضرع سے معجزہ مانگتے ہیں۔ معجزہ نمائی کی ایسی قدرت نہیں رکھتے جیسا کہ انسا ن کوہاتھ پَیر ہلانے کی قدرت ہوتی ہے۔ غرض معجزہ کی حقیقت اور مرتبہ سے یہ امر بالاتر
    ۱؂ المؤمنون:۱۵ ؕ‏
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 261
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 261
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/261/mode/1up
    ٹھہر سکتی اور اگر اس کتاب میں مخفی طور پر وہ سب سامان موجود ہے جو ہر یک حالتِ زمانہ کے لئے درکار ہے تو اس صورت میں ہمیں ماننا پڑے گا کہ قرآن شریف بلاریب غیر محدود معارف پر مشتمل ہے اور ہر یک زمانہ کی ضروراتِ لاحقہ کاکامل طور پر متکفّلؔ ہے۔
    اب یہ بھی یاد رہے کہ عادت اللہ ہر یک کا مل مُلہم کے ساتھ یہی رہی ہے کہ عجائباتِ مخفیہ فرقان اس پر ظاہر ہو تے رہے ہیں بلکہ بسا اوقات ایک ملہم کے دل پر قرآن شریف کی آیت الہام کے طوؔ ر پر القا ہو تی ہے اور اصل معنی سے پھیر کر کوئی اور مقصود اس سے ہو تا ہے۔جیسا کہ مولوی عبداللہ صاحب مرحوم غزنوی اپنے ایک مکتوب میں لکھتے ہیں کہ مجھے ایک مرتبہ
    بقیہ حاشیہ :اور ان صفات خاؔ صہ خدائے تعالےٰ میں سے ہے جو کسی حالت میں بشر کو مل نہیں سکتیں۔معجزہ کی حقیقت یہ ہے کہ خدائے تعالےٰ ایک امر خارق عادت یا ایک امر خیال اور گمان سے باہر اور امید سے بڑھکر ایک اپنے رسول کی عزت اور صداقت ظاہر کرنے کے لئے اور اس کے مخالفین کے عجز اورمغلوبیت جتلانے کی غرض سے اپنے ارادہ خاص سے یا اس رسول کی دعا اوردرخواست سے آپ ظاہر فرماتا ہے مگر ایسے طور سے جو اس کی صفات وحدانیت وتقدّس وکمال کے منافی ومغائر نہ ہو اور کسی دوسرے کی وکالت یاکارسازی کا اس میں کچھ دخل نہ ہو۔
    اب ہر یک دانشمند سوچ سکتا ہے کہ یہ صورت ہرگز معجزہ کی صورت نہیں کہ خدائے تعالےٰ دائمی طورپر ایک شخص کو اجازت اور اذن دیدے کہ تو مٹی کے پرندے بناکر پھونک مارا کر وہ حقیقت میں جانوؔ ر بن جایا کریں گے اور ان میں گوشت او رہڈی اور خون اور تمام اعضا جانوروں کے بن جائیں گے۔ ظاہر ہے کہ اگر خدائے تعالےٰ پرندو ں کے بنانے میں اپنی خالقیت کا کسی کو وکیل ٹھہرا سکتا ہے تو تمام امور خالقیت میں وکالتِ تامّہ کاعہدہ بھی کسی کودے سکتا ہے۔ اس صورت میں خدائے تعالیٰ کی صفات میں شریک ہوناجائز ہوگاگو اس کے حکم اور اذن سے ہی سہی اورنیز ایسے خالقوں کے سامنے اور فتشابہ الخلق علیہم کی مجبور ی سے خالق حقیقی کی معرفت مشتبہ ہوجائے گی۔ غرض یہ اعجاز کی صورت نہیں یہ تو خدائی کا حصہ دار بنانا ہے۔
    بعض دانشمند شرک سے بچنے کے لئے یہ عذر پیش کرتے ہیں کہ حضرت مسیح جو پرندے بناتے تھے وہ بہت دیر تک جیتے نہیں تھے ان کی عمر چھوٹی ہوتی تھی تھوڑی مسافت تک پرواز کر کے پھر گرکرمرجاتے تھے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 262
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 262
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/262/mode/1up
    الہام ہوا قلنا یا نار کونی بردًا وَّ سلامًا۔مگر میں اس کے معنے نہ سمجھا پھر الہا م ہوا قلنا یا ؔ صبر کونی بردا و سلا ما تب میں سمجھ گیا کہ نار سے مراد اس جگہ صبر ہے اور پھر فرماتے ہیں کہ ایک دفعہ مجھے الہام ہوا رب ادخلنی مد خل صدق و اخرجنی مخرج صدق اور اس سے مراد اصلی معنی نہیں تھے بلکہ یہ مراد تھی کہ مولوی صاحب کو ہستان ریاست کابل سےؔ پنجاب کے ملک میں بزیر سایہ سلطنت برطانیہ آجائیں گے۔اسی طرح انہوں نے اپنے الہامات میں کئی آیات فرقانی لکھی ہیں اور اُن کے اصلی معنے چھوڑ کر کوئی اور معنے مراد لئے ہیں۔
    بقیہ حاشیہ : لیکن ؔ یہ عذر بالکل فضول ہے اور صر ف اس حالت میں ماننے کے لائق ہے کہ جب یہ اعتقاد رکھاجائے کہ ان پرندوں میں واقعی اورحقیقی حیات پیدا نہیں ہوتی تھی بلکہ صرف ظلّی اور مجازی اور جھوٹی حیات جو عمل الترب کے ذریعہ سے پیداہوسکتی ہے ایک جھوٹی جھلک کی طرح ان میں نمودار ہوجاتی تھی۔ پس اگر اتنی ہی بات ہے تو ہم اسکو پہلے سے تسلیم کر چکے ہیں ہمارے نزدیک ممکن ہے کہ عمل الترب کے ذریعہ سے پھونک کی ہوا میں وہ قوت پیدا ہو جائے جو اس دُخان میں پیدا ہوتی ہے جس کی تحریک سے غبارہ اوپر کو چڑھتا ہے۔ صانع فطرت نے اس مخلوقات میں بہت کچھ خواص مخفی رکھے ہوئے ہیں۔ ایک شریک صفات باری ہونا ممکن نہیں اور کونسی صنعت ہے جو غیر ممکن ہے؟۔
    اور اؔ گر یہ اعتقا د رکھاجائے کہ اُن پرندوں میں واقعی اور حقیقی حیات پیدا ہوجاتی تھی اورسچ مچ اُن میں ہڈیاں گوشت پوست خون وغیرہ اعضا بن کر جان پڑجاتی تھی تو اس صورت میں یہ بھی ماننا پڑیگا کہ اُن میں جاندار ہونے کے تمام لوازم پیدا ہوجاتے ہوں گے اور وہ کھانے کے بھی لائق ہوتے ہونگے اور اُن کی نسل بھی آج تک کروڑہا پرندے زمین پر موجود ہوں گے اور کسی بیماری سے یاشکاری کے ہاتھ سے مرتے ہونگے تو ایسا اعتقاد بلاشبہ شرک ہے۔ بہت لوگ اس وسوسہ میں مبتلا ہوجاتے ہیں کہ اگر کسی نبی کے دعا کرنے سے کوئی مردہ زندہ ہوجائے یا کوئی جماد جانداربن جائے تو اس میں کونسا شرک ہے۔ ایسے لوگوں کو جاننا چاہیئے کہ اس جگہ دعا کا کچھ ذکر نہیں اوردعا قبول کرنا یا نہ کرنا اللہ جلّ شانُہ‘ کے اختیار میں ہوتا ہے اور دعاؔ پر جوفعل مترتب ہوتا ہے وہ فعل الٰہی ہوتا ہے نبی کا اس میں کچھ دخل نہیں ہوتااور نبی خواہ دعا کرنے کے بعدفوت ہوجائے نبی کے موجودہونے یا نہ ہونے کی اس میں کچھ حاجت نہیں ہوتی۔ غرض نبی کی طرف سے صرف دعا ہوتی ہے جو کبھی قبول اور کبھی ردّ بھی ہوجاتی ہے لیکن اس جگہ وہ صورت نہیں۔ اناجیل اربعہ کے دیکھنے سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 263
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 263
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/263/mode/1up
    اُن کے بعض مکتوبات اس عاجز کے پاس موجود ہیں انشاء اللہ بوقت ضرورت شائع کئے جائیں گے۔
    ابؔ مولوی عبد الرحمان صاحب براہ مہربانی بیان فرماویں کہ جبکہ سلف صالح کے بر خلاف قرآن شریف کے معنے کرنے سے انسان مُلحد ہو جاتا ہے اور اسی وجہ سے یہ عاجز بھی اُن کی نظر میں مُلحد ہے کہ خدائے تعالیٰ کے الہام سے بعض آیات کے معانی مخفی ظاہر کرتا ہے تو پھر مولوی عبداللہ صاحب مرحوم غزنوی کی نسبت جوؔ اُن کے مرشد ہیں کیا فتویٰ ہے؟
    بقیہ حاشیہ : صاف ظاہر ہے کہ مسیح جو جو کام اپنی قوم کو دکھلاتا تھا وہ دعا کے ذریعہ سے ہرگز نہیں تھے اور قرآن شریف میں بھی کسی جگہ یہ ذکر نہیں کہ مسیح بیماروں کے چنگا کرنے یاپرندوں کے بنانے کے وقت دعا کرتاتھا بلکہ وہ اپنی روح کے ذریعہ سے جس کو روح القدس کے فیضان سے برکت بخشی گئی تھی ایسے ایسے کام اقتداری طور پر دکھاتا تھا چنانچہ جس نے کبھی اپنی عمر میں غور سے انجیل پڑھیؔ ہوگی وہ ہمارے اس بیان کی بہ یقین تمام تصدیق کریگا اور قرآن شریف کی آیات بھی بآواز بلند یہی پکار رہی ہیں کہ مسیح کے ایسے عجائب کاموں میں اسکوطاقت بخشی گئی تھی اور خدائے تعالےٰ نے صاف فرما دیا ہے کہ وہ ایک فطرتی طاقت تھی جو ہریک فرد بشر کی فطرت میں مودّع ہے مسیح سے اس کی کچھ خصوصیت نہیں۔ چنانچہ اس بات کا تجزیہ اسی زمانہ میں ہو رہا ہے۔ مسیح کے معجزات تو اس تالاب کی وجہ سے بے رونق اور بے قدر تھے جو مسیح کی ولادت سے بھی پہلے مظہرِ عجائبات تھا جس میں ہر قسم کے بیمار اور تمام مجذوم مفلوج مبروص وغیرہ ایک ہی غوطہ مار کر اچھے ہوجاتے تھے لیکن بعد کے زمانوں میں جو لوگوں نے اس قسم کے خوارق دکھلائے اُس وقت تو کوئی تالاب بھی موجود نہیں تھا۔
    غرضؔ یہ اعتقادبالکل غلط اور فاسد اور مشرکانہ خیال ہے کہ مسیح مٹی کے پرندے بنا کر اوراُن میں پھونک مار کر انہیں سچ مچ کے جانور بنادیتا تھا۔ نہیں بلکہ صرف عمل الترب تھا جو روح کی قوت سے ترقی پذیرہوگیا تھا۔ یہ بھی ممکن ہے کہ مسیح ایسے کام کے لئے اس تالاب کی مٹی لاتا تھا جس میں روح القدس کی تاثیر رکھی گئی تھی۔ بہرحال یہ معجزہ صرف ایک کھیل کی قسم میں سے تھا اور وہ مٹی درحقیقت ایک مٹی ہی رہتی تھی۔ جیسے سامری کاگوسالہ۔ فتدبّر ۔ فانہ نکتۃ جلیلۃ ما یلقّٰھا اِلّا ذوحظٍ عظیم۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 264
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 264
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/264/mode/1up
    جن کو ایسے ایسے الہام بھی ہوگئے کہ جو آیتیں خاص پیغمبروں کے حق میں تھیں وہ اُ مّتی لوگوں کے حق میں قرار دے دیں۔چنانچہ دودفعہ بعض وہ آیتیں جو صحابہ کبارکے حق میں قرآن کریم میں تھیں اس عاجز کی طرف اپنے خط میں لکھ کر بھیج دیں کہ آپ کی نسبت مجھے یہ الہام ہوا ہے انہیں میں سے یہ آیات بھی ہیں (۱) قَدْ اَفْلَحَ مَنْ زَكّٰٮهَا ؂۱ (۲) اَنْتَ مَوْلٰٮنَا فَانصُرْنَا عَلَى الْقَوْمِ الْكٰفِرِيْنَ ؂۲
    اوریہ عاجز کہ جو مولوی عبداللہ غزنوی مرحوم سے محبت اورحُسن ظن رکھتا ہے تو درحقیقت اس کی یہی وجہ ہے کہ اُن کو خدائے تعالیٰ کی طرف سے الہام ہوا کہ یہ عاجز من جانب اللہ مامورہونے والا ہے اورانہوں نے کئی خط لکھے اوراپنے الہاماتِ متبرکہ ظاہرکئے اوربعض لوگوں کے پاس اس بارے میں بیان بھی کیا اورعالمِ کشف میں بھی اپنی یہ مراد ظاہرکی۔
    اُن ؔ سوالوں کے جوابات جو متفرق طورپرلوگ پیش کرتے ہیں
    سوال۔ مسیح ابن مریم کافوت ہونا قرآن شریف سے کہاں ثابت ہوتا ہے بلکہ یہ دونوں فقرے آیات کے یعنی رَافِعُکَ اِلَیَّ اور بَلْ رَّفَعَہٗ اللّٰہُ اِلَیْہِ دلالت کررہے ہیں کہ مسیح جسم کے ساتھ آسمان کی طرف اٹھایا گیا۔ایسا ہی یہ آیت کہ وَمَا قَتَلُوْهُ وَمَا صَلَبُوْهُ وَلٰـكِنْ شُبِّهَ لَهُمْ ؂۳ اسی پر دلالت کررہی ہے کہ مسیح نہ مصلوب ہوا اورنہ مقتول ہوا۔
    الجواب ۔ پس واضح ہو کہ خدائے تعالیٰ کی طرف اُٹھائے جانے کے یہی معنے ہیں کہ فوت ہوجانا۔ خدائے تعالیٰ کا یہ کہنا کہ ارْجِعِىْ اِلٰى رَبِّكِ ۴؂ اوریہ کہنا کہ اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَىَّ ۵؂ ایک ہی معنے رکھتا ہے۔سوا اس کے جس وضاحت اورتفصیل اورتوضیح کے ساتھ قرآن شریف میں مسیح کے فوت ہوجانے کا ذکر ہے اس سے بڑھ کر متصوّر نہیں کیونکہ خداوند عزّوجلّ نے
    ۱؂ الشمس:۱۰ ۲؂ البقرہ:۲۸۷ ۳ ؂ النساء: ۱۵۸ ۴ ؂ الفجر:۲۹ ۵؂ اٰل عمران:۵۶
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 265
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 265
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/265/mode/1up
    عام اورخاص دونوں طورپر مسیح کا فوت ہوجانا بیان فرمایا ہے عام طورپرجیساکہ وہ فرماتا ہےوَمَا مُحَمَّدٌ اِلَّا رَسُوْلٌ ۚ قَدْ خَلَتْ مِنْ قَبْلِهِ الرُّسُلُ‌ؕ اَفَا۟يِٕنْ مَّاتَ اَوْ قُتِلَ انْقَلَبْتُمْ عَلٰٓى اَعْقَابِكُمْ ۱؂ یعنی محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ) صرف ایک رسول ہے اور اسؔ سے پہلے ہریک رسول جو آیا وہ گذرگیا اورانتقال کرگیا اب کیا تم اس رسول کے مرنے یا قتل ہوجانیکی وجہ سے دین اسلام چھوڑدوگے ؟ اب دیکھو یہ آیت جو استدلالی طورپرپیش کی گئی ہے صریح دلالت کرتی ہے کہ ہر یک رسول کو موت پیش آتی رہی ہے خواہ وہ موت طبعی طورپر ہو یا قتل وغیرہ سے اور گذشتہ نبیوں میں سے کوئی ایسا نبی نہیں جو مرنے سے بچ گیا ہو۔سو اس جگہ ناظرین ببداہت سمجھ سکتے ہیں کہ اگر حضرت مسیح جو گذشتہ رسولوں میں سے ایک رسول ہیں اب تک مرے نہیں بلکہ زندہ آسمان پر اُٹھائے گئے تو اس صورت میں مضمون اس آیت کا جو عام طورپرہر یک گذشتہ نبی کے فوت ہونے پر دلالت کررہا ہے صحیح نہیں ٹھہر سکتا بلکہ یہ استدلال ہی لغو اورقابلِ جرح ہوگا۔
    پھردوسری آیت جو عام استدلال کے طریق سے مسیح ابن مریم کے فوت ہوجانے پر دلالت کرتی ہے یہ آیت ہےوَمَا جَعَلْنٰهُمْ جَسَدًا لَّا يَاْكُلُوْنَ الطَّعَامَ وَمَا كَانُوْا خٰلِدِيْنَ ۲؂ یعنی کسی نبی کا ہم نے ایسا جسم نہیں بنایا جوکھانے کامحتاج نہ ہو اوروہ سب مرگئے کوئی اُن میں سے باقی نہیں۔ ایساہی عام طورپر یہ بھی فرمایا
    وَمَا جَعَلْنَا لِبَشَرٍ مِّنْ قَبْلِكَ الْخُـلْدَ‌ؕ اَفَا۟ئِن مِّتَّ فَهُمُ الْخٰـلِدُوْنَ كُلُّ نَفْسٍ ذَآٮِٕقَةُ الْمَوْتِ ۳؂پھرؔ تیسر ی آیت جو عام استدلال کے طریق سے مسیح کے فوت ہوجانے پر دلالت کرتی ہے یہ آیت ہے‏
    ‏ وَمِنْكُمْ مَّنْ يُّرَدُّ اِلٰٓى اَرْذَلِ الْعُمُرِ لِكَيْلَا يَعْلَمَ مِنْۢ بَعْدِ عِلْمٍ شَيْـًٔـا ؂ ۴سورۃ الحج الجزو ۱۷۔ یعنی اے بنی آدم ! تم دوگروہ ہو۔ایک وہ جو پِیرانہ سالی سے پہلے فوت ہوجاتے ہیں یعنی پِیر فرتوت ہوکر نہیں مرتے بلکہ پہلے ہی مرجا تے ہیں۔دو سراوہ گروہ جواس قدر بڈھے ہوجاتے ہیں جو ایک ارذل حالت زندگی کی جو قابل نفرت ہے اُن میں
    ۱؂ اٰل عمران: ۱۴۵ ۲ ؂ الانبیاء:۹ ۳ ؂ الانبیاء: ۳۵ ،۳۶ ۴؂ الحج:۶
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 266
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 266
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/266/mode/1up
    پیدا ہوجاتی ہے یہاں تک کہ عالم اورصاحبِ عقل ہونے کے بعد سراسر نادان بچے کی طرح بن جاتے ہیں اورتمام عمر کا آموختہ بیک دفعہ سب بھول جاتا ہے۔
    اب چونکہ خدائے تعالیٰ نے طرز حیات کے بارے میں بنی آدم کی صرف دوگروہ میں تقسیم محدود کردی تو بہر حال حضرت مسیح ابن مریم خدائے تعالیٰ کے تمام خاکی بندوں کی طرح اس تقسیم سے باہر نہیں رہ سکتے یہ حکماء کا قانونِ قدرت نہیں جو کوئی اس کو ردّ کردے گا یہ تو سُنّت اللہ ہے جس کو خوداللہ جلَّ شَانُہٗ نے تصریح سے بیان فرمادیا ہے۔
    سو اؔ س تقسیم الٰہی کی رو سے لازم آتا ہے کہ یا تو حضرت مسیح مِنْکُمْ مَّنْ یَّتَوَفّٰی میں داخل ہوں اوروفات پا کر بہشت بریں میں اُس تخت پر بیٹھے ہوں جس کی نسبت انہوں نے آپ ہی انجیل میں بیان فرمایا ہے اوریا اگر اس قدر مدّت تک فوت نہیں ہوئے تو زمانہ کی تاثیر سے اس ارذ ل عمر تک پہنچ گئے ہوں جس میں بباعث بیکاری حواس اُن کا ہونا نہ ہونا برابر ہے۔
    اورجوخاص طور پر مسیح کے فوت ہوجانے پر آیات بیّنات دلالت کررہی ہیں کچھ ضروری نہیں کہ ہم ان کو بار بار ذکرکریں۔یہ بات ظاہر ہے کہ اگر مسیح ابن مریم اس جماعت مرفوعہ سے الگ ہے جو دنیا سے ہمیشہ کے لئے رخصت ہوکر خدائے تعالیٰ کی طرف اٹھائی گئی ہے تو ان میں جو عالم آخرت میں پہنچ گئے ہرگز شامل نہیں ہوسکتا بلکہ مرنے کے بعد پھر شامل ہو گا اوراگریہ بات ہوکہ اُن میں جا ملا اوربموجب آیت فَادْخُلِىْ فِىْ عِبٰدِىۙ۱؂ ان فوت شدہ بندوں میں داخل ہوگیا تو پھر انہیں میں سے شمار کیا جاوے گا۔اورمعراج کی حدیث سے صاف ثابت ہوتا ہے کہ مسیح اُن فوت شدہ نبیوں میں جاملا اوریحییٰ نبی کے پاسؔ اس کو مقام ملا۔ اس صورت میں ظاہر ہے کہ معنے اس آیت کے کہ اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَىَّ ۲؂ ہے یہ ہوں گے کہ انّی متوفّیک ورافعک الی عبادی المتوفین المقربین و ملحقک بالصّٰلحین۔سو عقلمند کے لئے جو متعصّب نہ ہو اسی قدرکافی ہے کہ اگر مسیح زندہ ہی اُٹھایا گیا تو پھر مُردوں میں کیوں جا گُھسا۔ ہاں اس قدر ذکر کرنا اَور بھی ضروری ہے کہ جیسے بعض نادان یہ خیال کرتے ہیں کہ و ہ آیات ذو معنیین ہیں یہ
    ۱؂ الفجر: ۳۰ ۲؂ اٰل عمران: ۵۶
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 267
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 267
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/267/mode/1up
    خیال سراسرفاسد ہے مومن کا یہ کام نہیں کہ تفسیر بالرائے کرے بلکہ قرآن شریف کے بعض مقامات بعض دوسرے مقامات کے لئے خود مفسّر اورشارح ہیں۔ اگر یہ بات سچ نہیں کہ مسیح کے حق میں جو یہ آیتیں ہیں کہ انّی متوفّیک اورفلمّا توفّیتنی یہ درحقیقت مسیح کی موت پر ہی دلالت کرتی ہیں بلکہ ان کے کوئی اورمعنے ہیں تو اس نزاع کا فیصلہ قرآن شریف سے ہی کرانا چاہیئے۔اوراگر قرآن شریف مساوی طورپر کبھی اس لفظ کو موت کے لئے استعمال کرتا ہے اورکبھی ان معنوں کے لئے جو موت سے کچھ علاقہ نہیں رکھتے تومحل متنازعہ فیہ میں مساوی طورپر احتمال رہے گااورؔ ا گر ایک خاص معنے اغلب اوراکثر طور پر مستعملات قرآنی میں سے ہیں تو انہی معنوں کو اس مقامِ بحث میں ترجیح ہوگی اوراگر قرآن شریف اوّل سے آخر تک اپنے کُل مقامات میں ایک ہی معنوں کو استعمال کرتاہے تو محل مبحوث فیہ میں بھی یہی قطعی فیصلہ ہوگا کہ جو معنے توفّی کے سارے قرآن شریف میں لئے گئے ہیں وہی معنے اس جگہ بھی مرادہیں کیونکہ یہ بالکل غیر ممکن اور بعید از قیاس ہے کہ خدائے تعالیٰ اپنے بلیغ اورفصیح کلام میں ایسے تنازع کی جگہ میں جو اس کے علم میں ایک معرکہ کی جگہ ہے ایسے شاذ اورمجہول الفاظ استعمال کرے جو اس کے تمام کلام میں ہرگز استعمال نہیں ہوئے۔اگر وہ ایسا کرے تو گویا وہ خلق اللہ کو آپ ورطۂ شبہات میں ڈالنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ اورظاہر ہے کہ اس نے ہرگز ایسا نہیں کیا ہو گا یہ کیوں کر ممکن ہے کہ خدائے تعالیٰ اپنے قرآن کریم کے تیئیس۲۳ مقام میں تو ایک لفظ کے ایک ہی معنے مرادلیتا جاوے اور پھردو مقام میں جو زیاد ہ تر محتاج صفائی بیان کے تھے کچھ اورکا اورمراد لے کر آپ ہی خلق اللہ کو گمراہی میں ڈال دے۔
    اب اے ناظرین !آپ پر واضح ہو کہ اس عاجز نے اول سے آ خرؔ تک تمام وہ الفاظ جن میں توفّی کا لفظ مختلف صیغوں میں آگیا ہے قرآن شریف میں غور سے دیکھے تو صاف طورسے کھل گیا کہ قرآن کریم میں علاوہ محل متنازعہ فیہ کے یہ لفظ تیئیس۲۳جگہ لکھا ہے اور ہر یک جگہ موت اورقبضِ روح کے معنوں میں استعمال کیا گیا ہے اورایک بھی ایسا مقام نہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 268
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 268
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/268/mode/1up
    جس میں توفّی کا لفظ کسی اور معنے پر استعمال کیا گیا ہو اور وہ یہ ہیں:۔
    نساء : حتّٰی یتوفّٰھُنَّ الموتَ
    اٰلِ عمران: وَتوَفَّنَا مَعَ الاَبرَ ارِ
    سجدۃ:قُلْ يَتَوَفّٰٮكُمْ مَّلَكُ الْمَوْتِ الَّذِىْ وُكِّلَ بِكُمْ
    نساء: اِنَّ الَّذِيْنَ تَوَفّٰٮهُمُ الْمَلٰٓٮِٕكَةُ ظَالِمِىْۤ اَنْفُسِهِمْ
    مؤمن: فَاِمَّا نُرِيَنَّكَ بَعْضَ الَّذِىْ نَعِدُهُمْ اَوْ نَتَوَفَّيَنَّكَ فَاِلَيْنَا يُرْجَعُوْنَ
    النحل: الَّذِيْنَ تَتَوَفّٰٮهُمُ الْمَلٰۤٮِٕكَةُ ظَالِمِىْۤ اَنْفُسِهِمْ
    تَتَوَفّٰٮهُمُ الْمَلٰۤٮِٕكَةُ طَيِّبِيْنَ
    بقر: يُتَوَفَّوْنَ مِنْكُمْ
    انعام: تَوَفَّتْهُ رُسُلُنَا
    اعراف: رُسُلُـنَا يَتَوَفَّوْنَهُمْۙ
    تَوَفَّنَا مُسْلِمِيْنَ
    الانفال: يَتَوَفَّى
    سورہ ٘محمد صلعم: فَكَيْفَ اِذَا تَوَفَّتْهُمُ الْمَلٰٓٮِٕكَةُ يَضْرِبُوْنَ وُجُوْهَهُمْ
    یونس: وَاِمَّا نُرِيَـنَّكَ بَعْضَ الَّذِىْ نَعِدُهُمْ اَوْ نَتَوَفَّيَنَّكَ
    یوسف: تَوَفَّنِىْ مُسْلِمًا وَّاَلْحِقْنِىْ بِالصّٰلِحِيْنَ‏
    رعد: اَوْ نَـتَوَفَّيَنَّكَ
    مؤمن: وَمِنْكُمْ مَّنْ يُّتَوَفّٰى
    نحل: ثُمَّ يَتَوَفّٰٮكُمْ
    حج: وَمِنْكُمْ مَّنْ يُّتَوَفّٰى
    زمر: اللّٰهُ يَتَوَفَّى الْاَنْفُسَ حِيْنَ مَوْتِهَا وَالَّتِىْ لَمْ تَمُتْ فِىْ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 269
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 269
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/269/mode/1up
    زمر: مَنَامِهَا‌ۚ فَيُمْسِكُ الَّتِىْ قَضَىٰ عَلَيْهَا الْمَوْتَ وَ يُرْسِلُ الْاُخْرٰٓى اِلٰٓى اَجَلٍ مُّسَمًّى
    الانعام: وَهُوَ الَّذِىْ يَتَوَفّٰٮكُمْ بِالَّيْلِ وَ يَعْلَمُ مَا جَرَحْتُمْ بِالنَّهَارِ ثُمَّ يَـبْعَثُكُمْ فِيْهِ لِيُقْضٰٓى اَجَلٌ مُّسَمًّى
    اب ظاہر ہے کہ ان تمام مقامات قرآن کریم میں توفّی کے لفظ سے موت اورقبض روح ہی مراد ہے اوردو مؤخر الذکر آیتیں اگر چہ بظاہر نیند سے متعلق ہیں مگر درحقیقت ان دونوں آیتوں میں بھی نیند نہیں مراد لی گئی بلکہ اس جگہ بھی اصل مقصد اورمدعا موت ہے اور یہ ظاہر کرنا منظور ہے کہ نیند بھی ایک قسم کی موت ہی ہے اورجیسی موت میں روح قبض کی جاتی ہے نیند میں بھی روح قبض کی جاتی ہے۔ سو ان دونوں مقامات میں نیند پر توفّی کے لفظ کا اطلاق کرنا ایک استعارہ ہے جو بہ نصب قرینۂ نوم استعمال کیا گیا ہے یعنی صاف لفظوں میں نیند کا ذکر کیا گیا ہے تاہر ایک شخص سمجھ لیوے کہ اسجگہ توفّی سے مراد حقیقی موت نہیں ہے بلکہ مجازی موت مرا دہے جو ؔ نیند ہے۔ یہ بات ادنیٰ ذی علم کو بھی معلوم ہو گی کہ جب کوئی لفظ حقیقت مسلّمہ کے طورپر استعمال کیا جاتاہے یعنی ایسے معنوں پر جن کے لئے وہ عام طور پر موضوع یا عام طور پر مستعمل ہوگیا ہے تو اس جگہ متکلم کے لئے کچھ ضروری نہیں ہوتا کہ اس کی شناخت کے لئے کوئی قرینہ قائم کرے کیونکہ وہ اُن معنوں میں شائع متعارف اور متبادرالفہم ہے لیکن جب ایک متکلم کسی لفظ کے معانی حقیقت مسلّمہ سے پھیر کر کسی مجازی معنی کی طرف لے جاتا ہے تو اس جگہ صراحتًا یا کنایتًا یا کسی دوسرے رنگ کے پَیرائے میں کوئی قرینہ اس کو قائم کرنا پڑتا ہے تا اس کا سمجھنا مشتبہ نہ ہو اور اس بات کے دریا فت کے لئے کہ متکلّم نے ایک لفظ بطور حقیقت مُسلّمہ استعمال کیا ہے یا بطور مجاز اوراستعارہ نادرہ کے بھی کھلی کھلی علامت ہوتی ہے کہ وہ حقیقت مسلّمہ کو ایک متبادر اور شائع و متعارف لفظ سمجھ کر
    ۱۰۵ (الَّذِىْ يَتَوَفّٰٮكُمْ ) درج ہونے سے رہ گئی ہے۔سید عبدالحئی ؂۱ اس فہرست میں سورۃ یونس نمبرکی آیت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 270
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 270
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/270/mode/1up
    بغیر احتیاج قرائن کے یونہی مختصر بیان کر دیتا ہے۔مگر مجاز یا استعارہ نادرہ کے وقت ایسا اختصار پسند نہیں کرتا بلکہ اس کا فرض ہوتا ہے کہ کسی ایسی علامت سے جس کو ایک دانشمند سمجھ سکے اپنے اس مدعا کو ظاہر کرجائے کہؔ یہ لفظ اپنے اصل معنوں پر مستعمل نہیں ہوا۔
    اب چونکہ یہ فرق حقیقت اورمجاز کا صاف طورپر بیان ہو چکا تو جس شخص نے قرآن کریم پر اوّل سے آخر تک نظر ڈالی ہوگی اور جہاں جہاں توفِّیکا لفظ موجود ہے بنظرِ غور دیکھا ہو گا وہ ایمانًا ہمارے بیان کی تائید میں شہادت دے سکتا ہے۔چنانچہ بطور نمونہ دیکھنا چاہیئے کہ یہ آیات
    (۱) وَاِمَّا نُرِيَـنَّكَ بَعْضَ الَّذِىْ نَعِدُهُمْ اَوْ نَتَوَفَّيَنَّكَ ؂۱
    (۲) تَوَفَّنِىْ مُسْلِمًا ؂۲
    (۳) وَمِنْكُمْ مَّنْ يُّتَوَفّٰى ؂۳
    (۴) تَوَفّٰٮهُمُ الْمَلٰٓٮِٕكَةُ ؂۴
    (۵) يُتَوَفَّوْنَ مِنْكُمْ ؂۵
    (۶) تَوَفَّتْهُ رُسُلُنَا ؂۶
    (۷) رُسُلُـنَا يَتَوَفَّوْنَهُمْۙ ؂۷
    (۸) تَوَفَّنَا مُسْلِمِيْنَ ؂۸
    (۹) وَتوَفَّنَا مَعَ الاَبرَ ارِ ؂۹
    (۱۰) ثُمَّ يَتَوَفّٰٮكُمْ ؂۱۰
    کیسی صریح اور صاف طورپر موت کے معنوں میں استعمال کی گئی ہیں مگر کیا قرآن شریف میں کوئی ایسی آیت بھی ہے کہ ان آیات کی طرح مجرد توفّی کا لفظ لکھنے سے اس سے کوئی اور معنے مراد لئے گئے ہوں۔ موت مراد نہ لی گئی ہو۔بلاشبہ قطعی اوریقینی طور پر اوّل سے آخر تک قرآنی محاورہ یہی ثابت ہے کہ ہر جگہ درحقیقت توفّی کے لفظ سے موت ہی مراد ہے تو پھر متنازعہ فیہ دؔ و آیتوں کی نسبت جو اِنِّی مُتَوَفِّیکَ اور فَلَمَّا تَوَ فَّیْتَنِیْ ہیں اپنے دل سے کوئی معنے مخالف عام محاورہ قرآن کے گھڑنا اگرالحاد اور تحریف نہیں تو اور کیا ہے ؟
    اور اس جگہ یہ نکتہ بیان کرنے کے لائق ہے کہ قرآن شریف میں ہر جگہ موت کے محل پر توفّی کا لفظ کیوں استعما ل کیا ہے اِمَاتت کا لفظ کیو ں استعمال نہیں کیا ؟ اس میں بھید یہ ہے کہ موت کا لفظ ایسی چیزوں کے فنا کی نسبت بھی بولا جاتا ہے جن پر فنا طاری ہونے کے بعد کوئی روح اُن کی باقی نہیں رہتی۔اسی وجہ سے جب نباتات اور جمادات اپنی صورت نوعیہ کو چھوڑ کر کوئی اَور صُوَر قبول کرلیں تو اُن پر بھی موت کا لفظ
    ۱؂ یونس:۴۷ ۲ ؂ یوسف:۱۰۲ ۳ ؂ الحج: ۶ ۴؂ النّسآء: ۹۸ ۵؂ البقرۃ: ۲۴۱ ۶؂ الانعام : ۶۲
    ۷؂ الاعراف: ۳۸ ۸؂ الاعراف :۱۲۷ ۹؂ اٰل عمران ۱۹۴ ۱۰؂ النحل: ۷۱
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 271
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 271
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/271/mode/1up
    اطلاق پاتا ہے جیسے کہتے ہیں کہ یہ لوہا مرگیا اور کشتہ ہوگیا اورچاندی کا ٹکڑہ مرگیا اورکشتہ ہوگیا۔ایسا ہی تمام جانداراور کیڑے مکوڑے جن کی روح مرنے کے بعد باقی نہیں رہتی اورمورد ثواب و عقاب نہیں ہوتے اُن کے مرنے پر بھی توفّی کا لفظ نہیں بولتے بلکہ صرف یہی کہتے ہیں کہ فلاں جانور مرگیا یا فلاں کیڑامرگیا۔چونکہ خدائے تعالیٰ کو اپنے کلام عزیز میں یہ منظور ہے کہ کھلے کھلے طور پر یہؔ ظاہر کرے کہ انسان ایک ایسا جاندار ہے کہ جس کی موت کے بعد بکلّی اس کی فنا نہیں ہوتی بلکہ ا س کی روح باقی رہ جاتی ہے جس کو قابضِ ارواح اپنے قبضہ میں لے لیتا ہے اس وجہ سے موت کے لفظ کو ترک کرکے بجائے اس کے توفّی کا لفظ استعمال کیا ہے تا اس بات پر دلالت کرے کہ ہم نے اس پر موت وارد کر کے بکلّی اس کو فنا نہیں کیا بلکہ صرف جسم پرموت وارد کی ہے اور روح کو اپنے قبضہ میں کر لیا ہے اور اس لفظ کے اختیار کرنے میں دہریوں کا ردّ بھی منظور ہے جو بعد موت جسم کے روح کی بقا کے قائل نہیں ہیں۔
    جاننا چاہیئے کہ قرآن شریف میں اوّل سے آخر تک توفِّیْکے معنے روح کو قبض کرنے اور جسم کو بیکار چھوڑ دینے کے لئے گئے ہیں اورانسان کی موت کی حقیقت بھی صرف اسی قدر ہے کہ روح کو خدائے تعالیٰ قبض کر لیتا ہے اورجسم کو اس سے الگ کر کے چھوڑ دیتاہے اور چونکہ نیند کی حالت بھی کسی قدر اس حقیقت میں اشتراک رکھتی ہے اسی وجہ سے مذکورہ بالا دو آیتوں میں نیند کو بھی بطور استعارہ توفِّی کی حالت سے تعبیر کیا ہے کیونکہ کچھؔ شک نہیں کہ نیند میں بھی ایک خاص حد تک روح قبض کی جاتی ہے اور جسم کو بے کار اور معطّل کیاجاتا ہے لیکن توفّی کی کامل حالت جس میں کامل طور پر روح قبض کی جائے اور کامل طور پر جسم بے کار کردیا جائے وہ انسان کی موت ہے اسی وجہ سے توفّی کا لفظ عام طور پر قرآن شریف میں انسان کی موت کے بارے میں ہی استعمال کیا گیا ہے اوراوّل سے آخر تک قرآن شریف اسی استعمال سے بھرا پڑا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 272
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 272
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/272/mode/1up
    اورنیند کے محل پر توفِّی58 کا لفظ صرف دو جگہ قرآن شریف میں آیا ہے اور وہ بھی قرینہ قائم کرنے کے ساتھ۔اوراُن آیتوں میں صاف طورپر بیان کردیا گیا ہے کہ اس جگہ بھی توفِّیْ کے لفظ سے نیند مراد نہیں ہے بلکہ موت ہی مراد ہے اور اس بات کا اظہار مقصود ہے کہ نیند بھی ایک موت ہی کی قسم ہے جس میں روح قبض کی جاتی ہے اور جسم معطل کیا جاتا ہے صرف اتنا فرق ہے کہ نیند ایک ناقص موت ہے اورموت حقیقی ایک کامل موت ہے۔
    یہ بات یاد رکھنے کے لائق ہے کہ توفّی کا لفظ جو قرآن شریف میں استعمال کیا گیا ہے خواہ وہ اپنے حقیقی معنوں پر مستعمل ہے یعنی مو تؔ پر یا غیر حقیقی معنوں پر یعنی نیند پر۔ہریک جگہ اُس لفظ سے مراد یہی ہے کہ روح قبض کی جائے اورجسم معطل اور بے کار کردیا جائے۔اب جبکہ یہ معنے مذکورہ بالا ایک مسلّم قاعدہ ٹھہر چکا جس پر قرآن شریف کی تمام آیتیں جن میں توفِّی کا لفظ موجود ہے شہادت دے رہی ہیں تو اس صورت میں اگر فرض محال کے طور پر ایک لمحہ کے لئے یہ خیال باطل بھی قبول کر لیں کہ اِنِّیْ مُتَوَفِّیْکَ کے معنے اِنِّیْ مُنِیْمُکَہے یعنی یہ کے میں تجھے سُلانے والا ہوں تو اس سے بھی جسم کا اُٹھایا جانا غلط ثابت ہوتا ہے کیونکہ اس جگہ اِنّی متوفّیک کے معنے از روئے قاعدہ متذکرہ بالا یہی کریں گے کہ میں تجھ پر نیند کی حالت غالب کرکے تیری روح کو قبض کرنے والا ہوں۔اب ظاہر ہے کہ انّی متوفّیک کے بعدجو رافعک الیّ فرمایا ہے یعنی میں تیری روح کو قبض کر کے پھر اپنی طرف اُٹھاؤں گا یہ رافعک کا لفظ انیّ متوفّیک کے لفظ سے تعلق رکھتا ہے جس سے ببداہت یہ معنے نکلتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے روح کو قبض کیا اور روح کو ہی اپنی طرف اُٹھایا کیوں کہ جو چیز قبض کی گئی وہی اُٹھائی جائے گی جسم کے قبض کرنے کا توؔ کہیں ذکر نہیں۔ چنانچہ دوسری آیات میں جو نیند کے متعلق ہیں خدائے تعالیٰ صاف صاف فرما چکا ہے کہ نیند میں بھی موت کی طرح روح ہی قبض کی جاتی ہے جسم نہیں قبض کیا جاتا۔اب ہریک شخص سمجھ سکتا ہے کہ جو قبض کیا جاتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 273
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 273
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/273/mode/1up
    اُٹھایا بھی وہی جائے گا۔یہ تو نہیں کہ قبض کیا جائے روح اورپھر جسم کو اُٹھایا جائے۔ایسے معنے تو قرآن شریف کی تمام آیات اورمنشائے ربّانی سے صریح صریح مخالف ہیں۔ قرآن شریف نیند کے مقامات میں بھی جو توفِّی کے لفظ کو بطور استعارہ استعمال کرتا ہے اس جگہ بھی صاف فرماتا ہے کہ ہم روح کو قبض کر لیتے ہیں اورجسم کو بے کار چھوڑ دیتے ہیں۔اورموت اور نیند میں صرف اتنا فرق ہے کہ موت کی حالت میں ہم روح کو قبض کر کے پھر چھوڑ تے نہیں بلکہ اپنے پاس رکھتے ہیں۔ اورنیند کی حالت میں ایک مدت تک روح کو قبض کرکے پھر اس روح کو چھوڑ دیتے ہیں اورپھر وہ جسم سے تعلق پکڑ لیتی ہے۔
    اب سوچنا چاہیئے کہ کیا یہ بیان قرآن شریف کا اس بات کے سمجھنے کے لئے کافی نہیں کہ خدائے تعالیٰ کو جسم قبض کرنے اوراٹھانے سے دونوں حالتوں موت اورنیند میں کچھ سروکار نہیں بلکہ جیسا کہ اس نے خو دؔ فرمایا ہے یہ جسم خاک سے پیدا کیا گیا ہے اور آخر خاک میں ہی داخل ہوتا ہے۔ خدائے تعالیٰ ابتدائے دنیا سے صرف روحوں کو قبض کرتا آیا ہے اور روحوں کو ہی اپنی طرف اُٹھاتا ہے جبکہ یہی امر واقعی اور یہی صحیح اور سچ ہے تو اس صورت میں اگر ہم فرض بھی کر لیں کہ انّی متوفّیک کے یہی معنے ہیں کہ مَیں تیری روح کو اسی طور سے قبض کرنے والا ہوں جیسا کہ سونے والے کی روح قبض کی جاتی ہے تو پھر بھی جسم کو اس قبض سے کچھ علاقہ نہیں ہو گا اور اس طور کی تاویل سے اگر کچھ ثابت ہوگا تو یہ ہو گا کہ حضرت مسیح کی روح خواب کے طور پر قبض کی گئی اور جسم اپنی جگہ زمین پر پڑا رہا اور پھر کسی وقت روح جسم میں داخل ہوگئی۔اورایسے معنے سراسر باطل اور دونوں فریق کے مقصد کے مخالف ہیں۔ کیونکہ صرف کچھ عرصہ کے لئے حضرت مسیح کا سونا اور پھر جاگ اُٹھنا ہماری اس بحث سے کچھ علاقہ نہیں رکھتا۔ اورقرآن کریم کی آیت ممدوحہ بالا صاف بلند آواز سے پکار رہی ہے کہ حضرت مسیح کی روح جو قبض کی گئی تو پھر سونیوالے کی روح کی طرح جسم کی طرف نہیں چھوڑی گئی بلکہ خدائے تعالیٰ نے اس کو اپنی طرف اُٹھا لیا۔جیساکہ الفاظ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 274
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 274
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/274/mode/1up
    صرؔ یحۃ الدلالت اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَىَّ ۱؂سے ظاہر ہے۔انصاف کی آنکھ سے دیکھنا چاہیئے کہ جس طرح حضرت مسیح کے حق میں اللہ جلّ شَانُہٗ نے قر آن کریم میں اِنِّی مُتَوَفّیِک فر مایا ہے اسی طرح ہمارے سیّد و مولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے حق میں فرمایا ہے وَاِمَّا نُرِيَـنَّكَ بَعْضَ الَّذِىْ نَعِدُهُمْ اَوْ نَتَوَفَّيَنَّكَ ۲؂ یعنی دونوں جگہ مسیح کے حق میں اور ہمارے سیّد و مو لیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کے حق میں تو فِّی کا لفظ مو جود ہے پھر کس قدر ناانصافی کی بات ہے کہ ہمارے سیّد ومولیٰ کی نسبت جو توفِّی کا لفظ آیا ہے تو اس جگہ تو ہم وفات کے ہی معنے کریں اور اُسی لفظ کو حضرت عیسٰی کی نسبت اپنے اصلی اور شائع متعارف معنوں سے پھیر کر اور اُن متفق علیہ معنے سے جو اوّل سے آخر تک قر آن شریف سے ظاہر ہو رہے ہیں انحراف کر کے اپنے دل سے کچھ اَور کے اَور معنے تراش لیں۔اگر یہ الحاد اور تحریف نہیں تو پھر الحاد اورتحریف کس کو کہتے ہیں!!!جس قدر مبسوط تفاسیر دنیا میں موجود ہیں جیسے کشاف اور معالم اور تفسیر رازی اور ابنؔ کثیر اور مدارک اور فتح البیان سب میں زیر تفسیر یاعیسٰی انّی متوفّیک یہی لکھا ہے کہ انّی ممیتک حتف انفک یعنی اے عیسٰی میں تجھے طبعی موت سے مار نیوالا ہوں بغیر اس کے کہ تُو مصلوب یامضروب ہونے کی حالت میں فوت ہو۔ غایت ما فی الباب بعض مفسرین نے اپنی کوتہ اندیشی سے اس آیت کی اَور وجوہ پر بھی تفسیریں کی ہیں۔لیکن صرف اپنے بے بُنیاد خیال سے نہ کسی آیت یا حدیث صحیح کے حوالہ سے۔ اگر وہ زندہ ہوتے تو اُن سے پوچھا جاتا کہ حق کے ساتھ تم نے باطل کو کیوں اور کس دلیل سے ملایا؟ بہر حال جب وہ اس بات کا اقرار کرگئے کہ منجملہ اقوال مختلفہ کے یہ بھی ایک قول ہے کہ ضرور حضرت مسیح فوت ہوگئے تھے اور ان کی روح اُٹھائی گئی تھی تو ان کی دوسری لغزشیں قابلِ عفو ہیں ان میں سے بعض جیسا کہ صاحبِ کشّاف خود اپنی قلم سے دوسرے اقوال کو قِیْلَ کے لفظ سے ضعیف ٹھہراگئے ہیں۔
    ۱؂ اٰل عمران: ۵۶ ۲؂ یونس:۴۷

    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 275
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 275
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/275/mode/1up
    اب جبکہ توفِّی کے لفظ کی بخوبی تحقیقات ہوچکی اور ثابت ہوگیا کہ تمام قرآن شریف میں اوّل سے آخر تک یہ لفظ فقط روح کے قبض کرنے کے معنوں میں استعمال کیا گیا ہے تو اب یہ دیکھنا باقی ر ہاؔ کہ اس کے بعد جو فقرہ رافعک الیّ میں رفع کا لفظ ہے یہ کن معنوں پر قرآن شریف میں مستعمل ہے۔
    جاننا چاہیئے کہ رَفع کا لفظ قرآن شریف میں جہاں کہیں انبیاء اور اخیار ابرار کی نسبت استعمال کیا گیا ہے عام طور پر اس سے یہی مطلب ہے کہ جو ان برگزیدہ لوگوں کو خدائے تعالیٰ کی جناب میں باعتبار اپنے روحانی مقام اور نفسی نقطہ کے آسمانوں میں کوئی بلند مرتبہ حاصل ہے اس کو ظاہر کر دیا جائے اور ان کو بشارت دی جائے کہ بعد موت و مفارقت بدن اُن کی روح اُس مقام تک جو اُن کے لئے قرب کا مقام ہے اُٹھائی جائے گی۔جیساکہ اللہ جلَّ شَانُہٗ ہمارے سیّد ومولیٰ کا اعلیٰ مقام ظاہر کرنے کی غرض سے قرآن شریف میں فرماتا ہے۔تِلْكَ الرُّسُلُ فَضَّلْنَا بَعْضَهُمْ عَلٰى بَعْضٍ‌ۘ مِنْهُمْ مَّنْ كَلَّمَ اللّٰهُ‌ وَرَفَعَ بَعْضَهُمْ دَرَجٰتٍ ؂۱ یعنی یہ تمام رسول اپنے مرتبہ میں یکساں نہیں بعض اُن میں سے وہ ہیں جن کو روبرو کلام کرنے کا شرف بخشا گیا اور بعض وہ ہیں جن کا رفع درجات سب سے بڑھ کر ہے۔
    ا سؔ آیت کی تفسیراحادیث نبویہ میں یہی بیان کی گئی ہے کہ موت کے بعد ہریک نبی کی روح آسمان کی طرف اُٹھائی جاتی ہے اوراپنے درجہ کے موافق اس رو ح کو آسمانوں میں سے کسی آسمان میں کوئی مقام ملتا ہے جس کی نسبت کہا جاتا ہے کہ اس مقام تک اس رُوح کا رفع عمل میں آیا ہے تا جیساکہ باطنی طور پر اس روح کا درجہ تھا خارجی طور پر وہ درجہ ثابت کرکے دکھلایا جائے سو یہ رفع جو آسمان کی طرف ہوتا ہے تحقیق درجات کے لئے وقوع میں آتا ہے اور آیت مذکورہ بالا میں جو رفع بعضھم درجات ہے یہ اشارہ ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا رفع تمام نبیوں کے رفع سے‌ؕ
    ۱؂ البقرۃ:۲۴۵
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 276
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 276
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/276/mode/1up
    بلند تر ہے اور اُن کی رُوح مسیح کی روح کی طرح دوسرے آسمان میں نہیں اور نہ حضرت موسیٰ کی روح کی طرح چھٹے آسمان میں بلکہ سب سے بلند تر ہے اسی کی طرف معراج کی حدیث بتصریح دلالت کر رہی ہے بلکہ معالم النبوۃ میں بصفحہ ۵۱۷یہ حدیث لکھی ہے کہ جب آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم شب معراج میں چھٹے آسمان سے آگے گذر گئے تو حضرت موسیٰ نے کہا رَبِّ لَمْ اَظُنُّ اَنْ یُّرْفَعَ عَلَیَّؔ اَحَدٌ یعنی اے میرے خداوند ! مجھے یہ گمان نہیں تھا کہ کوئی نبی مجھ سے اوپر اُٹھایا جائے گا اور اپنے رفع میں مجھ سے آگے بڑھ جائے گا۔ اب دیکھو کہ رفع کا لفظ محض تحقق درجات کے لئے استعمال کیا گیا ہے اور آیت موصوفہ بالا کے احادیث نبویہ کی رو سے یہ معنے کھلے کہ ہریک نبی اپنے درجہ کے موافق آسمانوں کی طرف اٹھایا جاتا ہے اور اپنے قرب کے انداز کے موافق رفع سے حصّہ لیتا ہے اور انبیاء اور اولیاء کی روح اگرچہ دنیوی حیات کے زمانہ میں زمین پر ہو مگر پھر بھی اُس آسمان سے اُس کا تعلق ہوتا ہے جو اس کی روح کے لئے حدِّ رفع ٹھہرایا گیا ہے اور موت کے بعد وہ روح اُس آسمان میں جا ٹھہرتی ہے جو اس کے لئے حدِّ رفع مقرّر کیا گیا ہے۔ چنانچہ وہ حدیث جس میں عام طورپر موت کے بعد روحوں کے اُٹھائے جانے کا ذکر ہے اس بیان کی مؤیّد ہے اور چونکہ یہ بحث نہایت صریح اور صاف ہے اور کسی قدر ہم پہلے لکھ بھی چکے ہیں اس لئے کچھ ضرورت نہیں کہ اس کو زیادہ طول دیا جائے۔
    اِس مقام میں یہ بھی بیان کرنے کے لائق ہے کہ بعض مفسّروں نےؔ جب دیکھا کہ درحقیقت انیّ متوفّیک میں توفِّی کے معنے وفات دینے کے ہیں اور بعد اس کے جو رافعک الیّ واقع ہے وہ بقرینہ صریحہ وفات کے روح کے رفع پر دلالت کر رہا ہے تو انہیں یہ فکر پڑی کہ یہ صریح ہماری رائے کے مخالف ہے اس لئے انہوں نے گویا اپنے تئیں نظمِ فرقانی کا مصلح قرار دے کر یا اپنے لئے استادی کا منصب تجویز کر کے یہ اصلاح
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 277
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 277
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/277/mode/1up
    کی کہ اس جگہ رافعک مقدّم اور انّی متوفیک مؤخر ہے۔ مگر ناظرین جانتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ کے ابلغ و افصح کلام میں یہ کس قدر بے جا اور اس کلا م کی کسرِشان کا موجب ہے۔ اس جگہ یہ بھی جاننا چاہیئے کہ خدائے تعالیٰ نے جو حضرت مسیح کے حق میں یہ فرمایا کہ وَمَا قَتَلُوْهُ وَمَا صَلَبُوْهُ وَلٰـكِنْ شُبِّهَ لَهُمْ ۱؂ اس سے ہرگز یہ مرادنہیں کہ مسیح فوت نہیں ہؤا۔کیامرنے کے لئے یہی ایک راہ ہے کہ انسان قتل کیا جائے یا صلیب پر کھینچاجائے ؟ بلکہ اس نفی سے مدعا اور مطلب یہ ہے کہ توریت استثناء باب ۲۱ آیت ۲۳ میں لکھا ہے کہ جو پھانسی دیا جاتا ہے خداکا ملعون ہے۔ اور یہود جنھوں نے اپنے زعم میںؔ حضرت عیسیٰ کو پھانسی دے دیا تھا وہ بہ تمسک اس آیت کے یہ خیال رکھتے تھے کہ مسیح ابن مریم نہ نبی تھا اور نہ مقبول الٰہی کیونکہ وہ پھانسی دیا گیا اور توریت بیان کر رہی ہے کہ جو شخص پھانسی دیا جائے وہ *** ہوتا ہے۔سوخدائے تعالیٰ کو منظور تھا کہ اصل حقیقت ظاہرکرکے اُن کے ا س قول کو ردّ کرے سو اس نے فرمایا کہ مسیح ابن مریم درحقیقت مصلوب نہیں ہوا ا ور نہ مقتول ہوا بلکہ اپنی موت سے فوت ہوا۔
    (۲)سوال۔ یہ کہاں اور کس کتاب میں لکھا ہے کہ مسیح ابن مریم جس کے آنے کا وعدہ دیا گیا وہ درحقیقت مسیح ابن مریم نہیں ہے بلکہ کوئی اس کا مثیل مرادہے ؟
    جواب۔ اس بات کوپہلے تو قرآن شریف ہی بتصریح ذکر کر چکا ہے جبکہ اس نے صاف لفظوں میں فرما دیا کہ کوئی نبی نہیں آیا جو فوت نہ ہوا ہو۔ وَمَا مُحَمَّدٌ اِلَّا رَسُوْلٌ ۚ قَدْ خَلَتْ مِنْ قَبْلِهِ الرُّسُلُ‌ؕ اَفَا۟يِٕنْ مَّاتَ اَوْ قُتِلَ انْقَلَبْتُمْ عَلٰٓى اَعْقَابِكُمْ ؂۲ وَمَا جَعَلْنَا لِبَشَرٍ مِّنْ قَبْلِكَ الْخُـلْدَ‌ؕ ؂۳ وَمَا جَعَلْنٰهُمْ جَسَدًا لَّا يَاْكُلُوْنَ الطَّعَامَ وَمَا كَانُوْا خٰلِدِيْنَ ؂ ۴اب ظاہر ہے کہ باوجود اِن تمام آیات کے جو بآواز بلند مسیح کی موت پر شہادت دے رہی ہیں پھر بھی مسیح کوزندہ خیال کرنا اور یہ اعتقاد رکھنا کہ برخلاف مفہوم آیت وَمَا جََعَلْنٰھُمْ جَسَدًا لَّا یَأْکلُوْنَ الطَّعَامَ مسیح جسم خاکی کے ساتھ
    ۱؂ النساء:۱۵۸ ۲؂ اٰل عمران:۱۴۵ ۳؂ الانبیاء:۳۵ ۴؂ الانبیاء:۹ ‏
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 278
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 278
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/278/mode/1up
    دوسرے آسمان میں بغیر حاجت طعام کے یونہی فرشتوں کی طرح زندہ ہے درحقیقت خدائے تعالیٰ کے پاک کلام سے رو گردانی ہے۔
    پھر میں کہتا ہوں کہ اگر مسیح اسی جسم خاکی کے ساتھ آسمان پر زندہ ہے تو خدا تعالیٰ کا آیت ممدوحہ بالا میں یہ دلیل پیش کرنا کہ یہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم اگر فوت ہو گیا تو اس کی نبوت پر کوئی اعتراض نہیں ہو سکتا۔ کیونکہ ابتدا سے سارے نبی مرتے ہی آئے ہیں بالکل نکمّی اور لغو بلکہ خلاف واقعہ ٹھہر جائے گی اورخدائے تعالیٰ کی شان اس سے بلند ہے کہ جھوٹ بولے یا خلاف واقعہ کہے۔
    اب ظاہر ہے کہ جبکہ مسیح فوت ہو چکا تو اب وہ موت کےؔ بعد آنہیں سکتا اورنہ اُس کے مرنے کے بعد قرآن شریف میں کوئی خبر اُس کے پھر زندہ ہونے کی دی گئی ہے پس بلا شبہ آنے والا مسیح اُس کا کوئی مثیل ہوگا۔ ماسوا اس کے خودآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی پاک احادیث میں اس بات کی طرف اشارہ بھی کر دیا ہے کہ آنے والا مسیح دراصل مسیح ابن مریم نہیں ہے بلکہ اس کا مثیل ہے کیونکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے جانے والے مسیح کااَور حُلیہ بتلایا ہے اور آنے والے مسیح کا اور حُلیہ ظاہر کیا ہے اور مسیح گذشتہ کی نسبت قطعی طور پر کہا ہے کہ وہ نبی تھا۔ لیکن آنیوالے مسیح کو اُ مّتی کرکے پکارا ہے جیسا کہ حدیث امامکم منکم سے ظاہر ہے۔ اور حدیث علماء اُمّتی کانبیاء بنی اسرائیل میں اشارۃً مثیل مسیح کے آنے کی خبر دی ہے۔چنانچہ اس کے مطابق آنے والا مسیح محدّث ہونے کی وجہ سے مجازًا نبی بھی ہے۔ پس اس سے زیادہ اَور کیا بیان ہو گا۔ ماسوا اس کے حضرت مسیح ابن مریم جس کی روح اُٹھائی گئی برطبق آیت کریمہ
    يٰاَيَّتُهَا النَّفْسُ الْمُطْمَٮِٕنَّةُ ارْجِعِىْ اِلٰى رَبِّكِ رَاضِيَةً مَّرْضِيَّةً فَادْخُلِىْ فِىْ عِبٰدِىۙ وَادْخُلِىْ جَنَّتِى
    ۱؂ بہشت میں داخل ہو چکی۔ اب کیوں کر پھر اس غمکدہ میں آجائیں گو اس کو ہم نے مانا کہ وہ کامل درجہ دخول بہشت کا جو جسمانی اور روحانی دونوں طور پر ہو گا وہ حشر اجساد کے بعد ہر یک مستحق کو عطاکیاجائے گا مگر اب بھی جس قدربہشت کی لذّات
    ۱؂ الفجر: ۲۸ تا۳۱
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 279
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 279
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/279/mode/1up
    عطاہوچکیں اس سے مقرب لوگ باہرؔ نہیں کئے جاتے اور قیامت کے دن میں بحضور ربّ العالمین اُن کا حاضر ہونا اُن کو بہشت سے نہیں نکالتا کیونکہ یہ تو نہیں کہ بہشت سے باہر کوئی لکڑی یا لوہے یا چاندی کا تخت بچھایا جائے گا اور خدائے تعالیٰ مجازی حُکَّام اور سلاطین کی طرح اس پر بیٹھے گا اور کسی قدر مسافت طے کر کے اُس کے حضور میں حاضر ہونا ہو گا۔ تا یہ اعتراض لازم آوے کہ اگر بہشتی لوگ بہشت میں داخل شدہ تجویز کئے جائیں تو طلبی کے وقت انہیں بہشت سے نکلنا پڑے گا اور اس لق و دق جنگل میں جہاں تخت ربّ العالمین بچھایا گیا ہے حاضر ہونا پڑے گا۔ایسا خیال تو سراسر جسمانی اور یہودیت کی سرشت سے نکلا ہوا ہے اور حق یہی ہے کہ ہم عدالت کے دن پر ایمان تو لاتے ہیں اورتخت ربّ العالمین کے قائل ہیں لیکن جسمانی طور پر اس کا خاکہ نہیں کھینچتے اور اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ جو کچھ اللہ اوررسول نے فرمایا ہے وہ سب کچھ ہو گا لیکن ایسے پاک طور پر کہ جو خدائے تعالیٰ کے تقدس اورتنزّہ اور اس کی تمام صفات کاملہ کے منافی ومغائر نہ ہو۔بہشت تجلّی گاہِ حق ہے یہ کیوں کر کہہ سکیں کہ اُس دن خدائے تعالیٰ ایک مجسم شخص کی طرح بہشتؔ سے باہر اپنا خیمہ یا یوں کہو کہ اپنا تخت بچھوا دے گا بلکہ حق یہ ہے کہ اس دن بھی بہشتی بہشت میں ہوں گے اور دوزخی دوزخ میں لیکن رحم الٰہی کی تجلّی عظمیٰ راستبازوں اور ایمانداروں پر ایک جدید طور سے لذّاتِ کاملہ کی بارش کر کے اور تمام سامان بہشتی زندگی کا حِسّی اور جسمانی طور پر انکو دکھلا کر اُس نئے طورپرکے دارالسلام میں ان کو داخل کردے گی۔ ایسا ہی خدائے تعالیٰ کی قہری تجلّی جہنم کو بھی بعد از حساب اور الزام صریح کے نئے رنگ میں دکھلا کر گویا جہنمی لوگوں کو نئے سرے جہنم میں داخل کریگی۔ روحانی طور پر بہشتیوں کا بلا توقف بعد موت کے بہشت میں داخل ہوجانا اور دوزخیوں کادوزخ میں گرایا جانا بتواتر قرآن شریف اوراحادیث صحیحہ سے ثابت ہے۔ کہاں تک ہم اس رسالہ کو طول دیتے جائیں۔اے خداوند قادر اس قوم پر رحم کر جو کلام الٰہی کو پڑھتے ہیں لیکن وہ پاک کلام اُن کے حلق سے آگے نہیں گذرتا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 280
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 280
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/280/mode/1up
    (۳) سوال۔ مسیح کے دوبارہ آنے کے ابطال میں جو یہ دلیل پیش کی گئی ہے کہ مسیح کا فوت ہونا ثابت ہے اور ہریک مومن راستباز مرنے کے بعد بہشت میں داخل ہوجا تا ہے اور ہر یک جوؔ بہشت میں داخل ہوجاتا ہے و ہ برطبق آیت وَ
    وَّمَا هُمْ مِّنْهَا بِمُخْرَجِيْنَ‏۱؂ ہمیشہ رہنے کا بہشت میں حق رکھتاہے۔ یہ دلیل صحیح نہیں ہے۔ کیونکہ اگر یہ صحیح ہے تو اس سے لازم آتا ہے کہ وہ قصہ صحیح نہ ہو جو عُزیر نبی کی نسبت قرآن شریف میں بیان کیا گیا ہے کہ وہ سو ۱۰۰ برس تک مرا رہا اور پھر خدائے تعالیٰ نے اس کو زندہ کیا وجہ یہ کہ برطبق قاعدہ مفروضۂ بالا زندہ ہونے سے یہ ماننا پڑتا ہے کہ وہ بہشت سے خارج کیا گیا۔ایسا ہی اس آیت کو ظاہر پر حمل کرنے سے مُردوں کا قبروں سے جی اُٹھنا اور میدانِ حساب میں ربّ العالمین کے حضورمیں آنا یہ سب باتیں اس آیت کے ایسے معنے کرنے سے کہ راستباز انسان مرنے کے بعد بہشت میں بلا توقف داخل ہوجاتا ہے اور پھراس سے کبھی نہیں نکلتا باطل ہوجاتے ہیں اور مسلّمات عقیدہ اسلام میں ایک سخت انقلاب پیداہوجاتا ہے۔
    اماالجواب۔ پس واضح ہو کہ حقیقت میں یہ سچ ہے کہ جو شخص بہشت میں داخل کیا جاتاہے پھر وہ اس سے کبھی خارج نہیں کیا جاتا۔جیساکہ اللہ جلَّ شَانُہٗ مومنین کو وعدہ صادقہ دے کر فرماتاہے
    لَا يَمَسُّهُمْ فِيْهَا نَـصَبٌ وَّمَا هُمْ مِّنْهَا بِمُخْرَجِيْنَ‏ ؂۲یعنی بہشت میں داخل ہونے والے ہریک رنج اور تکلیف سے رہا ئی پا گئے اور و ہ کبھی اس سے نکالے نہیں جائیں گے۔ سورۃالحجر الجزو نمبر ۱۴۔ پھر ایک دوسری جگہ فرماتا ہےوَاَمَّا الَّذِيْنَ سُعِدُوْا فَفِىْ الْجَـنَّةِ خٰلِدِيْنَ فِيْهَا مَا دَامَتِ السَّمٰوٰتُ وَالْاَرْضُ اِلَّا مَا شَآءَ رَبُّكَ‌ؕ عَطَآءً غَيْرَ مَجْذُوْذٍ ؂۳ ‏
    الجزو نمبر ۱۲سورہ ہود۔ یعنی سعید لوگ مرنے کے بعد بہشت میں داخل کئے جاتے ہیں اور ہمیشہ اُس میں رہیں گےجب تک آسمان و زمین ہے اور اگر یہ آسمان اور زمین بدلائے بھی جائیں جیسا کہ قیامت کے آنے کے وقت ہو گا تب بھی
    ۱؂ ، ۲؂ الحجر: ۴۹ ۳؂ ھود ۱۰۹
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 281
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 281
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/281/mode/1up
    سعید لوگ بہشت سے باہر نہیں ہوسکتے اور نہ ان چیزوں کے فساد سے بہشت میں کچھ فساد ہو سکتا ہے کیونکہ بہشت اُن کے لئے ایک ایسی عطاہے جو ایک لمحہ کے لئے بھی اس سے محروم نہیں رہ سکتے۔
    ایسا ہی قرآن شریف کے دوسرے مقامات میں بھی بہشتیوں کے ہمیشہ بہشت میں رہنے کا جا بجا ذکر ہے اور سارا قرآن شریف اس سے بھرا پڑا ہے۔ جیساکہ فرماتا ہےوَلَهُمْ فِيْهَآ اَزْوَاجٌ مُّطَهَّرَةٌ
    وَّهُمْ فِيْهَا خٰلِدُوْنَ ؂۱ اور اُولٰٓٮِٕكَ اَصْحَابُ الْجَـنَّةِ‌‌ۚ هُمْ فِيْهَا خٰلِدُوْنَ ۲؂ وغیرہ ۔وغیرہ۔
    اور یہ بھی ظاہر ہے کہ مومن کو فوت ہونے کے بعد بلا توقف بہشت میں جگہ ملتی ہے جیساکہ ان آیات سے ظاہر ہو رہا ہے‏ ‌ۙ
    قِيْلَ ادْخُلِ الْجَـنَّةَ ؕ قَالَ يٰلَيْتَ قَوْمِىْ يَعْلَمُوْنَۙ
    بِمَا غَفَرَلِىْ رَبِّىْ وَجَعَلَنِىْ مِنَ الْمُكْرَمِيْنَ۳؂ اور تیسری آیت
    ‏ وَلَا تَحْسَبَنَّ الَّذِيْنَ قُتِلُوْا فِىْ سَبِيْلِ اللّٰهِ اَمْوَاتًا‌ؕ بَلْ اَحْيَآءٌ عِنْدَ رَبِّهِمْ يُرْزَقُوْنَۙ
    فَرِحِيْنَ بِمَاۤ اٰتٰٮهُمُ اللّٰهُ مِنْ فَضْلِهٖۙ۴؂ اور احادیث میں تو اس قدر اس کا بیان ہے کہ جس کا باستیفاء ذکر کرنا موجب تطویل ہو گا بلکہ خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اپنا چشم د ید ماجرا بیان فرماتے ہیں کہ ’’مجھے دوزخ دکھلایا گیا تو میں نے اکثر اُس میں عورتیں دیکھیں اور بہشت دکھلایا گیا تو میں نے اکثر اُس میں فقراء دیکھے‘‘۔اور انجیل لوقا باب ۱۶ میں ایک قصہ کے طور پر بیان کیا گیاہے کہ لعزر جو ایک غریب آدمی تھا مرنے کے بعد ابرھام کی گود میں بٹھایا گیا یعنی نعیم جنت سے متمتع ہوا لیکن ایک دولت مند جو انہیں دنوں میں مرا دوزخ میں ڈالا گیا اور اس نے لعزر سے ٹھنڈاؔ پانی مانگا مگراُسے دیا نہ گیا۔
    ماسوا اس کے ایسی آیات بھی ہیں جو ظاہر کرتی ہیں جو حشر اجساد ہو گا اور حساب کے بعد بہشتی بہشت میں داخل کئے جائیں گے اور دوزخی دوزخ میں اور بظاہر اِن دونوں‏
    „۱؂ البقرۃ:۲۶ ۲؂ البقرۃ:۸۳ ۳؂ یٰسٓ: ۲۷،۲۸ ۴؂ اٰل عمران ۱۷۰۔۱۷۱
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 282
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 282
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/282/mode/1up
    قسموں کی آیات پر نظر ڈالنے سے تعارض معلوم ہوتا ہے قرآن شریف اور احادیث میں ارواح طیّبہ کا بہشت میں مرنے کے بعد داخل ہونا تو بدیہی اور کھلے کھلے طور پر ثابت ہے مگر ایک بھی ایسی آیت یا حدیث نہیں ملے گی جس سے یہ ثابت ہو سکے کہ یوم الحساب میں بہشتی لوگ بہشت سے باہر نکال دئے جائیں گے بلکہ حسب وعدہ الٰہی بہشت میں ہمیشہ رہنا بہشتیوں کا جابجا قرآن شریف اور احادیث میں مندرج ہے۔ ہاں دوسری طرف یہ بھی ثابت ہے کہ قبروں میں سے مردے جی اٹھیں گے اور ہریک شخص حکم سننے کے لئے خدائے تعالیٰ کے حضور میں کھڑا ہو گا اور ہریک شخص کے عمل اورایمان کا اندازہ الٰہی ترازو سے اُس پر ظاہرکیا جائے گا۔ تب جو لوگ بہشت کے لائق ہیں بہشت میں داخل کئے جائیں گے اور جو دوزخ میں جلنے کے سزاوار ہیں وہ دوزخ میں ڈال دئے جائیں گے۔
    ابؔ واضح ہو کہ اس تعارض کے دور کرنے کے لئے جو آیات اور احادیث میں باہم واقعہ ہے یہ راہ نہیں ہے کہ یہ اعتقادظاہر کیا جائے کہ موت کے بعد تمام روحیں ایک فنا کی حالت میں رہتی ہیں۔ نہ کسی قسم کی اُن کو راحت حاصل ہوتی ہے اور نہ کسی نوع کی عقوبت میں گرفتار ہوتی ہیں اور نہ جنت کی ٹھنڈی ہو ا اُن کو پہنچتی ہے اور نہ دوزخ کی بھاپ ان کو جلاتی ہے کیونکہ ایسااعتقاد نصوص بیّنہ فرقان اور حدیث سے بکلّی مغائر ہے۔ میّت کے لئے جودعاکی جاتی ہے یا صدقات کئے جاتے ہیں اور میّت کی نیّت سے مساکین کو طعام کھلایا جاتا ہے یا کپڑا دیاجاتا ہے اگر اس درمیانی زمانہ میں جو قبل از حشراجساد ہے جنت اور جہنم کا میّت سے کچھ علاقہ نہیں تو یہ سب اعمال ایک مدّت دراز تک بطور عبث کے متصور ہوں گے اور یہ ماننا پڑے گا کہ اِس درمیانی زمانہ میں میت کو راحت اور رنج اورثواب اور عقاب سے کچھ علاقہ نہیں ہوتا حالانکہ ایسا گمان تعلیم نبوی سے سراسرمخالف ہے۔
    پس وہ واقعی امر جس سے اِن دونوں قسم کی آیات کا تعارض دو رؔ ہوتا ہے یہ ہے کہ جنت اور جہنم تین درجوں پرمنقسم ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 283
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 283
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/283/mode/1up
    پہلا درجہ جو ایک ادنیٰ درجہ ہے اُس وقت سے شروع ہوتا ہے کہ جب انسان اس عالم سے رخصت ہو کر اپنی خواب گاہ قبر میں جا لیٹتا ہے اور اس درجہ ضعیفہ کو استعارہ کے طور پر احادیث نبویہ میں کئی پیرایوں میں بیان کیا گیا ہے۔ منجملہ اُن کے ایک یہ بھی پیرایہ ہے کہ میّت عبد صالح کے لئے قبر میں جنت کی طرف ایک کھڑکی کھولی جاتی ہے جس کی راہ سے وہ جنت کی باغ و بہار دیکھتا ہے اور اس کی دلرُبا ہو ا سے متمتع ہوتا ہے اور اس کھڑکی کی کشادگی بحسب مرتبہ ایمان و عمل اس میّت کے ہوتی ہے لیکن ساتھ اس کے یہ بھی لکھا ہے کہ جو ایسے فنا فی اللہ ہونے کی حالت میں دنیا سے جدا ہوتے ہیں کہ اپنی جان عزیز کو محبوب حقیقی کی راہ میں فدا کردیتے ہیں جیسے شہداء یا وہ صدیق لوگ جو شہداء سے بھی بڑھ کر آگے قدم رکھتے ہیں اُن کے لئے اُن کی موت کے بعد صرف بہشت کی طرف کھڑکی ہی نہیں کھولی جاتی بلکہ وہ اپنے سارے وجود اور تمام قویٰ کے ساتھ بہشت میں داخل ہوجاتے ہیں مگر پھر بھی قیامت کے ؔ دن سے پہلے اکمل اوراتم طورپر لذّات جنت حاصل نہیں کر سکتے۔
    ایساہی اس درجہ میں میّت خبیث کے لئے دوزخ کی طرف قبر میں ایک کھڑکی کھولی جاتی ہے جس کی راہ سے دوزخ کی ایک جلانے والی بھاپ آتی رہتی ہے اور اُس کے شعلوں سے ہر وقت وہ خبیث روح جلتی رہتی ہے لیکن ساتھ اس کے یہ بھی ہے کہ جو لوگ اپنی کثرت نافرمانی کی وجہ سے ایسے فنا فی الشیطان ہونے کی حالت میں دنیا سے جداہوتے ہیں کہ شیطان کی فرمانبرداری کی وجہ سے بکلّی تعلقات اپنے مولیٰ حقیقی سے توڑ دیتے ہیں اُن کے لئے اُن کی موت کے بعد صرف دوزخ کی طرف کھڑکی ہی نہیں کھولی جاتی بلکہ وہ اپنے سارے وجود اور تمام قوےٰ کے ساتھ خاص دوزخ میں ڈال دئے جاتے ہیں جیسا کہ اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتاہےمِّمَّا خَطٓيْئٰتِهِمْ اُغْرِقُوْا فَاُدْخِلُوْا نَارً ا۱؂ سورہ نوحمگر پھر بھی وہ لوگ قیامت کے دن سے پہلے اکمل اور اتم طور پر عقوبات جہنم کا
    ۱؂ نوح:۲۶ ۙ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 284
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 284
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/284/mode/1up
    مزہ نہیں چکھتے۔
    دوسرا درجہ۔ پھر اس درجہ سے اوپر جو ابھی ہم نے بہشتیوں اور دوزؔ خیوں کے لئے بیان کیا ہے ایک اور درجہ دخولِ جنت دخول جہنم ہے جس کو درمیانی درجہ کہنا چاہیئے اور حشر اجساد کے بعد اورجنت عظمیٰ یا جہنم کبریٰ میں داخل ہونے سے پہلے حاصل ہو تا ہے اوربوجہ تعلق جسد کامل قویٰ میں ایک اعلیٰ درجہ کی تیزی پیداہو کر اورخدائے تعالیٰ کی تجلی رحم یا تجلی قہر کا حسب حالت اپنے کامل طورپر مشاہدہ ہو کر اور جنت عظمیٰ کو بہت قریب پا کر یا جہنم کبریٰ کو بہت ہی قریب دیکھ کر وہ لذات یا عقوبات ترقی پذیرہوجاتے ہیں جیساکہ اللہ جلَّ شَانُہٗ آپ فرماتا ہے
    وَبُرِّزَتِ الْجَحِيْمُ لِلْغٰوِيْنَۙ؂۱ وَاُزْلِفَتِ الْجَـنَّةُ لِلْمُتَّقِيْنَۙ‏
    اُولٰٓٮِٕكَ هُمُ الْكَفَرَةُ الْفَجَرَةُ۔ ؂۲‏ تَرْهَقُهَا قَتَرَةٌ۔ ؕ‏ وَوُجُوْهٌ يَّوْمَٮِٕذٍ عَلَيْهَا غَبَرَةٌۙ ۔ ‏وُجُوْهٌ يَّوْمَٮِٕذٍ مُّسْفِرَةٌۙ ۔ ضَاحِكَةٌ مُّسْتَبْشِرَةٌ ۔ ‌ۚ‏‏
    اس دوسرے درجہ میں بھی لوگ مساوی نہیں ہوتے بلکہ اعلیٰ درجہ کے بھی ہوتے ہیں جو بہشتی ہونے کی حالت میں بہشتی انوار اپنے ساتھ رکھتے ہیں۔ اُنہیں کی طرف اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتا ہے نُوْرُهُمْ يَسْعٰى بَيْنَ اَيْدِيْهِمْ وَبِاَيْمَانِهِمْ ؂۳ ایساہی دوزخی ہونے کی حالت میں اعلیٰ درجہ کے کفار ہوتے ہیں کہ قبل اس کے جو کامل طور پر دوزخ میں پڑیں اُن کے دلوں پر دوزخ کی آگ بھڑکائی جاتیؔ ہے جیسا کہ اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتا ہے الَّتِىْ تَطَّلِعُ عَلَى الْاَفْـِٕدَةِؕ‏ نَارُ اللّٰهِ الْمُوْقَدَةُۙ ؂۴ پھر اس درجہ کے اُوپر جو آخری درجہ ہے تیسرا درجہ ہے جو منتہائے مدارج ہے جس میں یوم الحساب کے بعد لوگ داخل ہوں گے اوراکمل اور اتم طور پر سعادت یا شقاوت کا مزہ چکھ لیں گے۔
    اب حاصل کلام یہ ہے کہ ان تینوں مدارج میں انسان ایک قسم کے بہشت یا ایک قسم کے دوزخ میں ہوتا ہے اورجبکہ یہ حال ہے تو اس صورت میں صاف ظاہرہے کہ اِن مدارج میں سے کسی درجہ پر ہونے کی حالت میں انسان بہشت یا دوزخ میں سے نکالا نہیں جاتا۔ ‏
    ۱؂ الشعراء:۹۱، ۹۲ ۲؂ عبس: ۳۹،۴۲ ۳؂ التحریم: ۹ ۴؂ الھمزۃ: ۷، ۸
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 285
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 285
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/285/mode/1up
    ہاں جب اس درجہ سے ترقی کرتا ہے تو ادنیٰ درجہ سے اعلیٰ درجہ میں آجاتا ہے۔
    اس ترقی کی ایک یہ بھی صورت ہے کہ جب مثلًا ایک شخص ایمان اور عمل کی ادنیٰ حالت میں فوت ہوتا ہے تو تھوڑی سی سوراخ بہشت کی طرف اس کے لئے نکالی جاتی ہے کیونکہ بہشتی تجلّی کی اُسی قدراس میں استعداد موجود ہوتی ہے۔ پھر بعد اس کے اگر وہ اولاد صالح چھوڑ کر مرؔ ا ہے جو جدو جہد سے اس کے لئے دعائے مغفرت کرتے ہیں اور صدقات و خیرات اُس کی مغفرت کی نیت سے مساکین کو دیتے ہیں یا ایسے کسی اہل اللہ سے اس کی محبت تھی جو تضرعات سے جناب الٰہی سے اس کی بخشش چاہتا ہے یا کوئی ایساخلق اللہ کے فائدہ کا کام وہ دنیا میں کرگیا ہے جس سے بندگانِ خدا کو کسی قسم کی مد د یا آرام پہنچتا ہے تو اس خیر جاری کی برکت سے وہ کھڑکی اس کی جو بہشت کی طرف کھولی گئی دن بدن اپنی کشادگی میں زیادہ ہوتی جاتی ہے اورسبقت رحمتی علی غضبی کا منشاء اور بھی اس کو زیادہ کرتا جاتا ہے۔ یہاں تک کہ وہ کھڑکی ایک بڑا وسیع دروازہ ہو کر آخر یہاں تک نوبت پہنچتی ہے کہ شہیدوں اور صدیقوں کی طرح وہ بہشت میں ہی داخل ہوجاتا ہے۔اس بات کو سمجھنے والے سمجھ سکتے ہیں کہ یہ بات شرعًا وانصافًا وعقلًا بے ہُودہ ہے کہ ایساخیال کیا جائے کہ باوجود اس کے کہ ایک مرد مسلم فوت شدہ کے بعد ایک قسم کی خیر اس کے لئے جاری رہے اورثواب اوراعمال صالحہ کی بعض وجوہ اس کے لئے کھلی رہیں مگر پھر بھی وہ کھڑکی جو بہشت کی طرف اس کے لئے کھولی گئی ہے ہمیشہ اُتنی کی اُتنی ہی رہے جو پہلے دن کھو لیؔ گئی تھی۔
    یاد رکھنا چاہئے کہ خدائے تعالیٰ نے اس کھڑکی کے کھولنے کے لئے پہلے سے اس قدر سامان کر رکھے ہیں جن سے بتصریح معلوم ہوتا ہے کہ اس کریم کا دراصل منشاء ہی یہی ہے کہ اگر ایک ذرّہ ایمان و عمل لے کر بھی اس کی طرف کوئی سفر کرے تو وہ ذرّہ بھی نشوونما کرتا رہے گا اوراگر کسی اتفاق سے تمام سامان اس خیر کے جومیّت کو اس عالم کی طرف سے پہنچتی ہے نا پیدارہیں تاہم یہ سامان کسی طرح ناپیدا اور گُم نہیں ہو سکتا کہ جو تمام مومنوں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 286
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 286
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/286/mode/1up
    اور نیک بختوں اور شہیدوں اور صدیقوں کے لئے تاکیدی طور پر یہ حکم فرمایا گیا کہ وُہ اپنے اُن بھائیوں کے لئے بدل و جان دعائے مغفرت کرتے رہیں جو اُن سے پہلے اس عالم میں گذر چکے ہیں اور ظاہر ہے کہ جن لوگوں کے لئے ایک لشکر مومنوں کا دعا کررہا ہے وہ دعا ہرگز ہرگزخالی نہیں جائے گی بلکہ وہ ہر روزکا م کررہی ہے اورگنہگار ایماندار جو فوت ہو چکے ہیں اُن کی اُس کھڑکی کو جو بہشت کی طرف تھی بڑے زور سے کھول رہی ہے اِن دعاؤں نے اب تک بے شمار کھڑکیوں کو اس حد تک کشادہ کر دیا ہے کہ بے انتہاء ایسے لوگ بہشت میںؔ پہنچ چکے ہیں جن کواوّل دنوں میں صرف ایک چھوٹی سی کھڑکی بہشت کے دیکھنے کے لئے عطا کی گئی تھی۔
    اِس زمانہ کے اُن تمام مسلمانوں کو جو مُوحّد کہلاتے ہیں یہ دھوکا بھی لگا ہوا ہے کہ وہ خیال کرتے ہیں کہ مرنے کے بعد بہشت میں داخل ہونے والے صرف شہید لوگ ہیں اور باقی تمام مومنین یہاں تک کہ انبیاء اور رسول بھی یوم الحساب تک بہشت سے باہر رکھے جائیں گے صرف ایک کھڑکی اُن کے لئے بہشت کی طرف کھولی جائے گی۔ مگر اب تک انہوں نے اس بات کی طر ف توجہ نہیں کی کہ کیا انبیاء اور تمام صدیق رُوحانی طور پر شہیدوں سے بڑھ کر نہیں ہیں اور کیا بہشت سے دور رہنا ایک قسم کا عذاب نہیں جو مغفورین کے حق میں تجویز نہیں ہو سکتا؟ جس کے حق میں خدائے تعالیٰ یہ کہے کہ 3 ۱؂ کیا ایسا شخص سعادت اور فوز مرام میں شہیدوں کے پیچھے رہ سکتا ہے ؟ افسوس کہ ان لوگوں نے اپنی نافہمی سے شریعت غرّا کو اُلٹا دیا ہے۔ اُن کے زعم میں سب سے پہلے بہشت میں داخل ہونے والے شہید ہیں اور شاید کہیں بے شمار برسوں کے بعد نبیوں اور صدیقوں کی بھی نوبت آوے اس کسر شان کا الزام اُن لوگوں پر بڑا بھاری ہے جوؔ بودے عذروں سے دور نہیں ہو سکتا بے شک یہ بات سب کے فہم میں آسکتی ہے کہ جو لوگ ایمان اور عمل میں سابقین ہیں وہی لوگ دخول فی الجنت میں بھی سابقین چاہئیں نہ یہ کہ اُن کے لئے صرف ضعیف الایمان لوگوں کی طرح
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 287
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 287
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/287/mode/1up
    کھڑکی کھولی جائے اور شہید لوگ دنیا سے رخصت ہوتے ہی ہر یک پھل بہشت کا چُن چُن کر کھانے لگیں۔ اگر بہشت میں داخل ہونا کامل ایمان کامل اخلاص کامل جانفشانی پر موقوف ہے تو بلا شبہ نبیوں اور صدیقوں سے اَور کوئی بڑھ کر نہیں جن کی تمام زندگی خدائے تعالیٰ کے لئے وقف ہوجاتی ہے اور جو خدائے تعالیٰ کی راہ میں ایسے فِدا ہوتے ہیں کہ بس مر ہی رہتے ہیں اور تمنّا رکھتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ کی راہ میں شہید کئے جائیں اورپھر زندہ ہوں اور پھر شہید کئے جائیں اور پھر زندہ ہوں اور پھر شہید کئے جائیں۔
    اب ہماری اس تمام تقریر سے بخوبی ثابت ہو گیا کہ بہشت میں داخل ہونے کے لئے ایسے زبردست اسباب موجود ہیں کہ قریبًا تمام مومنین یوم الحساب سے پہلے اس میں پورے طور پر داخل ہو جائیں گے اور یوم الحساب اُن کو بہشت سے خارج نہیں کرے گا بلکہ اُس وقت اَور بھی بہشت نزدیک ہو جائیگا۔ کھڑؔ کی کی مثال سے سمجھ لینا چاہیئے کہ کیوں کر بہشت قبر سے نزدیک کیا جاتا ہے۔کیا قبر کے متصل جو زمین پڑی ہے اُس میں بہشت آجاتا ہے ؟ نہیں۔ بلکہ روحانی طورپر نزدیک کیا جاتا ہے۔ اسی طرح روحانی طورپر بہشتی لوگ میدانِ حساب میں بھی ہوں گے او ربہشت میں بھی ہوں گے۔ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ میری قبر کے نیچے روضہ بہشت ہے۔ اِس پر خوب غور کرو کہ یہ کس بات کی طرف اشارہ ہے ؟
    اورعُزیرؑ کے فوت ہونے اورپھر سو برس کے بعد زندہ ہونے کی حجت جو پیش کی گئی ہے یہ حجّت مخالف کے لئے کچھ مفید نہیں ہے کیونکہ ہرگز بیان نہیں کیا گیا کہ عُزیرؑ کو زندہ کر کے پھر دنیاکے دارالہموم میں بھیجا گیا تا یہ فساد لازم آوے کہ وہ بہشت سے نکالا گیا بلکہ اگراِن آیات کو اُن کے ظاہری معانی پر محمول کیا جاوے تو صرف یہ ثابت ہوگا کہ خدائے تعالیٰ کے کرشمۂ قدرت نے ایک لمحہ کے لئے عزیرؑ کو زندہ کرکے دکھلا دیا تا اپنی قدرت پر اس کو یقین دلا دے۔ مگر وہ دنیا میں آنا صرف عارضی تھا اور دراصل عزیر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 288
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 288
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/288/mode/1up
    بہشت میں ہی موجود تھا۔ جاننا چاہیئے کہ تمام انبیاء اور صدیق مرنے کے بعد پھر زندہ ہو جاتے ہیں اور ایک نورانی جسم بھی انہیں عطاؔ کیا جاتا ہے اور کبھی کبھی بیداری میں راستبازوں سے ملاقات بھی کرتے ہیں۔ چنانچہ اس بارہ میں یہ عاجز خودصاحب تجربہ ہے۔ پھر اگر عزیرؑ کو خدائے تعالیٰ نے اسی طرح زندہ کر دیا ہو تو تعجب کیا ہے لیکن اس زندگی سے یہ نتیجہ نکالنا کہ وہ زندہ ہو کر بہشت سے خارج کئے گئے یہ عجب طور کی نادانی ہے بلکہ اس زندگی سے تو بہشت کی تجلّی زیادہ تر بڑھ جاتی ہے۔
    (۴)سوال۔ قرآن شریف کی آیت مندرجہ ذیل مسیح ابن مریم کی زندگی پر دلالت کرتی ہے اور وہ یہ ہے 3 ۱؂ کیونکہ اس کے یہ معنے ہیں کہ مسیح کی موت سے پہلے تمام اہل کتاب اس پر ایمان لے آویں گے۔ سوا س آیت کے مفہوم سے معلوم ہوتا ہے کہ ضرور ہے کہ مسیح اس وقت تک جیتا رہے جب تک کہ تمام اہل کتاب اس پر ایمان لے آویں۔
    امّا الجواب۔ پس واضح ہو کہ سائل کو یہ دھوکا لگا ہے کہ اس نے اپنے دل میں یہ خیال کر لیا ہے کہ آیت فرقانی کا یہ منشاء ہے کہ مسیح کی موت سے پہلے تمام اہل کتاب کے فرقوں کا اُس پر ایمان لانا ضروری ہےؔ ۔کیونکہ اگر ہم فرض کے طور پر تسلیم کر لیں کہ آیت موصوفہ بالا کے یہی معنے ہیں جیسا کہ سائل سمجھا ہے تو اس سے لازم آتا ہے کہ زمانہ صعود مسیح سے اس زمانہ تک کہ مسیح نازل ہو جس قدر اہل کتاب دنیا میں گذرے ہیں یا اب موجود ہیں یا آئندہ ہوں گے وہ سب مسیح پر ایمان لانے والے ہوں۔ حالانکہ یہ خیال ببداہت باطل ہے۔ ہر یک شخص خوب جانتا ہے کہ بے شمار اہل کتاب مسیح کی نبوت سے کافر رہ کر اب تک واصل جہنم ہو چکے ہیں اورخداجانے آئندہ بھی کس قدر کفر ان کی وجہ سے اس آتشی تنور میں پڑیں گے اگرخدائے تعالیٰ کا یہ منشاء ہوتا کہ وہ تمام اہل کتاب فوت شدہ مسیح کے نازل ہونے کے وقت اُس پر ایمان لاویں گے تو وہ اُن سب کو اُس وقت تک زندہ رکھتا جب تک کہ مسیح
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 289
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 289
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/289/mode/1up
    آسمان سے نازل ہوتا لیکن اب مرنے کے بعد اُن کا ایمان لانا کیوں کر ممکن ہے ؟
    بعض لوگ نہایت تکلّف اختیار کر کے یہ جواب دیتے ہیں کہ ممکن ہے کہ مسیح کے نزول کے وقت خدائے تعالیٰ اُن سب اہل کتاب کو پھر زندہ کرے جو مسیح کے وقتِ بعث سے مسیح کے دوبارہ نزول تک کفرؔ کی حالت میں مر گئے ہیں۔ تو اس کا جواب یہ ہے کہ یوں تو کوئی کام خدائے تعالیٰ سے غیر ممکن نہیں لیکن زیر بحث تو یہ امر ہے کہ کیا قرآن کریم اوراحادیثِ صحیحہ میں ان خیالات کا کچھ نشان پایا جاتا ہے اگر پایا جاتا ہے تو کیوں وہ پیش نہیں کیا جاتا ؟۔
    بعض لوگ کچھ شرمندے سے ہو کر دبی زبان یہ تاویل پیش کرتے ہیں کہ اہلِ کتاب سے مراد وہ لوگ ہیں جو مسیح کے دوبارہ آنے کے وقت دنیا میں موجود ہوں گے اوروہ سب مسیح کو دیکھتے ہی ایمان لے آویں گے اور قبل اس کے جو مسیح فوت ہو وہ سب مومنوں کی فوج میں داخل ہوجائیں گے۔ لیکن یہ خیال بھی ایسا باطل ہے کہ زیادہ لکھنے کی حاجت نہیں اوّل تو آیت موصوفہ بالا صاف طور پر فائدہ تعمیم کا دے رہی ہے جس سے معلوم ہوتا ہے کہ اہل کتاب کے لفظ سے تمام وہ اہل کتاب مراد ہیں جو مسیح کے وقت میں یا مسیح کے بعد برابر ہوتے رہیں گے۔اورآیت میں ایک بھی ایسالفظ نہیں جو آیت کو کسی خاص محدود زمانہ سے متعلق اور وابستہ کرتا ہو۔ علاوہ اس کے یہ معنے بھی جو پیش کئے گئے ہیں ببداہت فاسد ہیں۔ کیونکہ احادیث بآواز بلندؔ بتلا رہی ہیں کہ مسیح کے دم سے اُس کے منکر خواہ وہ اہل کتاب ہیں یا غیر اہل کتاب کفر کی حالت میں مریں گے * اور کچھ ضرورنہیں کہ ہم بار بار ان حدیثوں کو نقل کریں۔ اسی رسالہ میں اپنے موقعہ پر دیکھ لینا چاہیئے ماسوا اس کے مسلمانوں کا یہ عقیدہ مسلّمہ ہے کہ دجّال بھی اہل کتاب میں سے ہی ہو گا اور یہ بھی مانتے ہیں کہ وہ مسیح پر ایمان نہیں لائے گا۔ اب میں اندازہ نہیں کر سکتا کہ اس خیال کے
    مسیحی دم سے مرجانے کے حقیقی معنے ہم بیان کر آئے ہیں کہ اس سے مراد حجت اور بیّنہ کی رو سے مرنا ہے۔ ورنہ دور از ادب بات ہے کہ یہ خیال کیاجائے کہ کوئی زہر ناک اور وبائی مادہ مسیح کے مُنہ سے نکل کراور ہوا سے ملکرکمزور کافروں کو ماریگا مگر دجال کو مار نہیں سکے گا۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 290
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 290
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/290/mode/1up
    پَیرواِ ن حدیثوں کو پڑھ کر کس قدر شرمندہ ہوں گے۔ یہ بھی مانا گیا اور مسلم میں موجود ہے کہ مسیح کے بعد شریر رہ جائیں گے جن پر قیامت آئے گی ۔اگر کوئی کافر نہیں رہے گا تو وہ کہاں سے آجائے گی۔
    اب بالطبع یہ سوال پیدا ہوگا کہ اگرآیت متذکرہ بالا کے وہ معنے صحیح نہیں ہیں تو پھر کون سے معنے صحیح ہیں ؟ تو اس کے جواب میں واضح ہو کہ صحیح معنے وہی ہیں جو اس مقام کی تما م آیات متعلقہ پرنظر ڈالنے سے ضروری التسلیم معلوم ہوتے ہیں جن کے ماننے سے کسی وجہ کا نقص لازم نہیںؔ آتا۔ سو اوّل وہ تما م آیتیں ذیل میں ذکر کرتا ہوں۔پھر بعد اس کے وہ حقیقی معنے جو اِن آیات کی رُو سے ثابت ہوتے ہیں ثابت کروں گا۔ اورآیات یہ ہیں :۔
    ترجمہ:۔ اور یہودی جوخدائے تعالیٰ کی رحمت اور ایمان سے بے نصیب ہو گئے اس کا سبب اُن کے وہ برے کام ہیں جو انہوں نے کئے۔ منجملہ اُن کے یہ ہے کہ انہوں نے کہاکہ لو ہم نے اس مسیح عیسیٰ ابن مریم کو قتل کر دیا جو رسول اللہ ہونے کا دعویٰ کرتا تھا (یہودیوں کا یہ کہنا کہ ہم نے عیسیٰ رسول اللہ کو قتل کر دیا اس کے یہ معنی نہیں ہیں کہ وہ حضرت مسیح کو رسول جانتےؔ تھے کیونکہ اگر وہ اس کو سچا رسول جانتے تو سُولی دینے کے لئے کیوںآمادہ ہوتے بلکہ یہ قول اُن کا کہ لو ہم نے اس رسول کو پھانسی دے دیا بطوراستہزاء کے تھا اور اس ہنسی ٹھٹھے کی بِنا ء توریت کے اس قول پر تھی جو لکھا ہے کہ جو پھانسی دیا جائے وہ ملعون ہے یعنی خدائے تعالیٰ کی رحمت اور قرب الٰہی سے دُور و مہجور ہے۔ اور یہودیوں کے اس قول سے مدعا یہ تھا کہ اگر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 291
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 291
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/291/mode/1up
    عیسیٰ ابن مریم سچا رسول ہوتا تو ہم اس کو پھانسی دینے پر ہرگز قادر نہ ہو سکتے کیونکہ توریت بلند آواز سے پکار رہی ہے کہ مصلوب *** ہوتا ہے) اب قرآن شریف اس آیت کے بعد فرماتا ہے کہ درحقیقت یہودیوں نے مسیح ابن مریم کو قتل نہیں کیا اور نہ پھانسی دیا بلکہ یہ خیال اُن کے دلوں میں شعبہ کے طور پر ہے یقینی نہیں اور خدائے تعالیٰ نے ان کو آپ ہی شبہ میں ڈال دیا ہے تا اُن کی بیوقوفی اُن پر اور نیز اپنی قادریت اُن پر ظاہر کرے۔ اور پھر فرمایا کہ وہ لوگ جو اس شک میں پڑے ہوئے ہیں کہ شاید مسیح پھانسی ہی مل گیا ہو اُنکے پاس کوئی یقینی و قطعی دلیل اس بات پر نہیں صرف ایک ظن کی پیروی کر رہے ہیں۔ اور وہ خوب جانتے ہیں کہ انہیں یقینی طورپر اس بات کا علم نہیں کہ مسیحؔ پھانسی دیا گیا بلکہ یقینی امر یہ ہے کہ وہ فوت ہوگیا اور اپنی طبعی موت سے مرا اور خدائے تعالیٰ نے اس کو راستباز بندوں کی طرح اپنی طرف اُٹھا لیا۔ اورخداعزیز ہے اُن کو عزت دیتا ہے جو اس کے ہو رہتے ہیں اورحکیم ہے اپنی حکمتوں سے اُن لوگوں کو فائدہ پہنچاتا ہے جو اس پر توکل کرتے ہیں۔ اورپھر فرمایا کہ کوئی اہل کتاب میں سے ایسا نہیں جو ہمارے اس بیان مذکورہ بالا پر( جو ہم نے اہل کتاب کے خیالات کی نسبت ظاہر کیا ہے )ایمان نہ رکھتا ہو قبل اس کے جو وہ اس حقیقت پر ایمان لاوے جو مسیح اپنی طبعی موت سے مر گیا یعنی ہم جو پہلے بیان کر آئے ہیں کہ کوئی اہل کتاب اس بات پر دلی یقین نہیں رکھتا کہ درحقیقت مسیح مصلوب ہو گیا ہے کیا عیسائی اور کیایہودی صرف ظن اور شبہ کے طورپر اُن کے مصلوب ہونے کاخیال رکھتے ہیں۔یہ ہمارا بیان صحیح ہے کوئی اس سے انکار نہیں کر سکتا۔ ہاں اس کی موت کے بارہ میں اُنہیں خبر نہیں کہ وہ کب مرا۔ سو اس کی ہم خبر دیتے ہیں کہ وہ مر گیا اوراسکی روح عزّت کے ساتھ ہماری طرف اُٹھائی گئی۔
    اس جگہ یاد رہے کہ خدائے تعالیٰ کا یہ کہنا کہ کوئی اہل کتاب میں سے ایساؔ نہیں کہ ہمارے اس بیان پر جو اُن کے خیالات کے بارہ میں ہم نے ظاہرکیا ایمان نہ رکھتا ہو۔ یہ ایک
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 292
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 292
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/292/mode/1up
    اعجازی بیان ہے اور یہ اس آیت کے موافق ہے جیسا کہ یہودیوں کو فرمایا تھا 33 ۱؂ سو اس فرمانے سے مدعا یہ تھا کہ درحقیقت یہودیوں کا یہ بیان کہ ہم نے درحقیقت مسیح کو پھانسی دے دیا جس سے یہ نتیجہ نکالنامنظور تھا کہ نعوذ باللہ مسیح ملعون ہے اور نبی صادق نہیں۔اورایسا ہی عیسائیوں کا یہ بیان کہ درحقیقت مسیح پھانسی کی موت سے مر گیا جس سے یہ نتیجہ نکالنا منظو ر تھا کہ مسیح عیسائیوں کے گناہ کے لئے کفّارہ ہوا۔ یہ دونوں خیال یہودیوں اور عیسائیوں کے غلط ہیں اور کسی کو ان دونوں گروہ میں سے اِن خیالات پر دلی یقین نہیں بلکہ دلی ایمان اُن کا صرف اِسی پر ہے کہ مسیح یقینی طور پر مصلوب نہیں ہوا۔اس تقریر سے خدائے تعالیٰ کا یہ مطلب تھا کہ یہودیوں اور عیسائیوں کی خاموشی سے منصفین قطعی طور پر سمجھ لیویں کہ اس بارے میں بجُر شک کے اُن کے پاس کچھ نہیں اور یہودی اور عیسائی جو اس آیت کو سُن کر چُپ رہے اور انکارکے لئے میدان میں نہ آئے تو اس کی یہ وجہ تھی کہ وہ خوب جانتے تھے کہ اگر ہم مقاؔ بل پر آئے اور وہ دعوےٰ کیا جو ہمارے دل میں نہیں تو ہم سخت رُسوا کئے جائیں گے اور کوئی ایسا نشان خدائے تعالیٰ کی طرف سے ظاہر ہو جائے گا جس سے ہمارا جھوٹا ہونا ثابت ہو جائے گا۔ اس لئے انہوں نے دم نہ مارا اور چُپ رہے۔اور اگر چہ وہ خوب جانتے تھے کہ ہماری اس خاموشی سے ہمارا مان لینا ثابت ہوجائے گا جس سے ایک طرف تو ان کفارکے اس عقیدہ کی بیخ کنی ہو گی اور ایک طرف یہ یہودی عقیدہ باطل ثابت ہوجائے گا کہ مسیح خدائے تعالیٰ کا سچا رسول اور راستباز نہیں اوراُن میں سے نہیں جن کا خدائے تعالیٰ کی طرف عزت کے ساتھ رفع ہوتا ہے۔ لیکن محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سچائی کی چمکتی ہوئی تلوار اُن کی آنکھوں کو خیرہ کر رہی تھی۔ پس جیسا کہ قرآن شریف میں انہیں کہا گیا کہ اگر تم سچے ہو تو موت کی تمنّا کرو۔لیکن مارے خوف کے کسی نے یہ تمنّا نہ کی۔ اسی طرح اس جگہ بھی مارے خوف کے انکارنہ کر سکے۔یعنی یہ دعویٰ نہ کر سکے کہ ہم تومسیح کے مصلوب ہونے پر یقین رکھتے ہیں ہمیں کیوں بے یقینوں میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 293
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 293
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/293/mode/1up
    داخل کیا جاتا ہے ؟ سو اُن کا نبی کے زمانہ میں خاموشی اختیار کرنا ہمیشہ کے لئے حجت ہوگئی اور اُن کے ساختہ پرداختہ کا اثر اُن کی آنے والی ذرّیتوں پر بھی پڑا۔ کیونکہ سلف خلف کے لئےؔ بطور وکیل کے ہوتے ہیں اور ان کی شہادتیں آنیوالی ذرّیت کوماننی پڑتی ہیں۔
    اب ناظرین سمجھ سکتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے جو اس بحث کو چھیڑا کہ مسیح مصلوب نہیں ہوا بلکہ اپنی موت سے فوت ہوا۔ اس تمام بحث سے یہی غرض تھی کہ مسیح کے مصلوب ہونے سے دو مختلف فرقے یعنی یہود اور عیسائی دو مختلف نتیجے اپنی اپنی اغراض کی تائید میں نکالتے تھے۔ یہودی کہتے تھے کہ مصلوب ہو گیا اور توریت کی رُو سے مصلوب *** ہوتا ہے۔ یعنی قرب الٰہی سے مہجوراور رفع کی عزت سے بے نصیب رہتا ہے اور شانِ نبوت اس حالتِ ذلّت سے برتر واعلیٰ ہے۔ اور عیسائیوں نے یہودیوں کی لعن و طعن سے گھبرا کر یہ جواب بنا لیا تھا کہ مسیح کا مصلوب ہونا اُس کے لئے مضر نہیں بلکہ یہ *** اُس نے اِس لئے اپنے ذمہ لے لی کہ تاگنہگاروں کو *** سے چھڑاوے۔سو خدائے تعالیٰ نے ایسافیصلہ کیا کہ ان دونوں فریق کے بیانات مذکورہ بالا کو کالعدم کردیا اور ظاہر فرمادیاکہ کسی کو اِن دونوں گروہ میں سے مسیح کے مصلوب ہونے پر یقین نہیں اور اگر ہے تو وہ سامنے آوے۔ سو وہ بھاگ گئےؔ اور کسی نے دم بھی نہ مارا اور یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآن شریف کا ایک معجزہ ہے جو اس زمانہ کے نادان مولویوں کی نگاہ سے چُھپا ہوا ہے اور مجھے اُس ذات کی قسم ہے کہ جس کے ہاتھ میں میری جان ہے کہ ابھی اور اسی وقت کشفی طور پر یہ صداقت مذکورہ بالا میرے پر ظاہر کی گئی ہے اور اُسی معلّم حقیقی کی تعلیم سے میں نے وہ سب لکھا ہے جو ابھی لکھا ہے۔ فالحمد للہ علیٰ ذالک۔
    اور عقلی طورپر بھی اگر دیکھا جائے تو اس بیان کی سچائی پر ہر یک عقل سلیم گواہی دے گی کیونکہ خدائے تعالیٰ کا کلام لغوباتوں سے منزّہ ہونا چاہیئے۔ اور ہریک عقلمند سمجھ سکتا ہے کہ اگر اس بحث میں یہ مقاصدعظمیٰ درمیان نہ ہوں تو یہ سارا بیان ایسا لغو ہوگا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 294
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 294
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/294/mode/1up
    جس کے تحت کوئی حقیقت نہیں کیونکہ اس صورت میں یہ جھگڑاکہ کوئی نبی پھانسی ملا یا اپنی طبعی موت سے مرا بالکل بے فائدہ جھگڑا ہے جس سے کوئی عمدہ نتیجہ پیدا نہیں ہو سکتا۔ سو غوؔ ر سے دیکھنا چاہیئے کہ خدائے تعالیٰ اپنے اس پُر جوش اور کرّوفر کے بیان میں کہ کسی یہودی یا عیسائی کو یقینی طورپر مسیح کی مصلوبیت پر ایمان نہیں کونسی بڑی غرض رکھتا ہے ؟ اور کونسا بھار ا مدعا اس کے زیر نظر ہے جس کے اثبات کے لئے اُس نے دونوں فریق یہوداور نصاریٰ کو خاموش اور لاجواب کر دیا ہے۔ سو یہی مدعا ہے جس کو خدائے تعالیٰ نے اپنے اس عاجز بندہ پر کہ جو مولویوں کی نظر میں کافر اورمُلحد ہے اپنے خاص کشف کے ذریعہ سے کھول دیا ہے۔
    اے خدا جانم بر اسرارت فدا
    اُمّیاں را مے دہی فہم و ذکا
    درجہانت ہمچومن اُمّی کجا ست
    درجہالت ہا مرا نشو و نما ست
    کِرمکے بودم مرا کردی بشر
    من عجب تراز مسیحے بے پدر
    اور اگر یہ سوال کیا جائے کہ مسیح کی عدم مصلوبیت پر انجیل کی روسے کوئی استدلال پیدا ہوسکتا ہے یا نہیں یعنی یہ ثابت ہو سکتا ہے یانہیں کہ گو بظاہر صورت مسیح کو صلیب ہی دی گئی ہو مگر تکمیل اس فعلؔ کی نہ ہوئی ہو یعنی مسیح اس صلیب کی وجہ سے وفات یاب نہ ہوا ہو۔
    تو اس کا جواب یہ ہے کہ اناجیل اربعہ قرآن شریف کے اس قول پر کہ ما قتلوہ وماصلبوہ صاف شہادت دے رہی ہیں کیونکہ قرآن کریم کا منشاء ماصلبوہ کے لفظ سے یہ ہرگز نہیں ہے کہ مسیح صلیب پر چڑھایا نہیں گیا بلکہ منشاء یہ ہے کہ جو صلیب پر چڑھانے کا اصل مدعا تھا یعنی قتل کرنا اس سے خدائے تعالیٰ نے مسیح کو محفوظ رکھا اور یہودیوں کی طرف سے اس فعل یعنی قتلِ عمد کا اقدام تو ہوا مگر قدرت اور حکمتِ الٰہی سے تکمیل نہ پا سکا۔ اور جیسا کہ انجیلوں میں لکھا ہے یہ واقعہ پیش آیا کہ جب پیلا طوس سے صلیب دینے کے لئے یہودیوں نے مسیح کوجو حوالات میں تھا مانگا تو پلا طوس نے بہت کوشش کی کہ کسی طرح مسیح کو چھوڑ دے کیونکہ وہ صاف دیکھتا تھا کہ مسیح بے گناہ ہے لیکن یہودیوں نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 295
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 295
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/295/mode/1up
    بہت اصرار کیا کہ اس کو صلیب دے صلیب د ے۔ اور سَب مولوی اور فقیہ یہودیوں کے اکٹھے ہو کر کہنے لگے کہ یہ کافر ہے اور توریت کے احکام سے لوگوں کو پھیرتا ہے۔ پلاطوس اپنے دل میں خوب سمجھتاتھا کہ اِ ن جزئی اختلافات کی وجہ سے ایک راستباز آدمی کو قتلؔ کر دینا بے شک سخت گناہ ہے اسی وجہ سے وہ حیلے پیدا کرتا تھا کہ کسی طرح مسیح کو چھوڑ دیا جائے۔ مگر حضرات مولوی کب بازآنے والے تھے انہوں نے جھٹ ایک اور بات بنالی کہ یہ شخص یہ بھی کہتا ہے کہ میں یہودیوں کا بادشاہ ہو ں اور درپردہ قیصر کی گورنمنٹ سے باغی ہے۔اگر تو نے اس کو چھوڑ دیا تو پھر یاد رکھ کہ ایک باغی کو تُو نے پناہ دی۔ تب پلاطوس ڈر گیا کیونکہ وہ قیصرکا ماتحت تھالیکن معلوم ہوتا ہے کہ پھر بھی اس خونِ ناحق سے ڈرتا رہا۔ اور اس کی عورت نے خواب دیکھی کہ یہ شخص راستباز ہے اگر پلاطوس اس کو قتل کرے گا تو پھر اسی میں اُس کی تباہی ہے۔ سو پلاطوس اس خواب کو سُن کر اَور بھی ڈھیلا ہو گیا اس خواب پر غور کرنے سے جو انجیل میں لکھی ہے ہریک ناظرِ بصیر سمجھ سکتا ہے کہ ارادہ الٰہی یہی تھا کہ مسیح کو قتل ہوجانے سے بچاوے۔ سو پہلا اشارہ منشاء الٰہی کا اس خواب سے ہی نکلتا ہے اس پر خوب غور کرو۔
    بعد اس کے ایسا ہوا کہ پلاطوس نے آخری فیصلہ کے لئے اجلاس کیا اور نابکار مولویوں اورفقیہوں کو بہتیرا سمجھایا کہ مسیح کے خون سے باز آجاؤمگر وہ باز نہ آئے بلکہ چیخ چیخ کر بولنے لگے کہ ضرور صلیب دیاؔ جائے دین سے پھرگیا ہے۔ تب پلاطوس نے پانی منگواکر ہاتھ دھوئے کہ دیکھو میں اس کے خون سے ہاتھ دھوتا ہوں۔ تب سب یہودیوں اور فقیہوں اور مولویوں نے کہا کہ اس کا خون ہم پر اور ہماری اولاد پر۔
    پھر بعد اس کے مسیح اُن کے حوالہ کیا گیا اور اس کو تازیانے لگائے گئے اور جس قدر گالیاں سُننا اور فقیہوں اور مولویوں کے اشارہ سے طمانچے کھانا اور ہنسی اور ٹھٹھے سے اُڑائے جانا اس کے حق میں مقدرتھا سب اُس نے دیکھا۔ آخر صلیب دینے کے لئے طیار ہوئے یہ جمعہ کا دن تھا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 296
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 296
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/296/mode/1up
    اورعصر کا وقت۔اور اتفاقًا یہ یہودیوں کی عید فسح کا بھی دن تھا۔ اس لئے فرصت بہت کم تھی اور آگے سبت کا دن آنے والا تھاجس کی ابتدا غروب آفتاب سے ہی سمجھی جاتی تھی کیونکہ یہودی لوگ مسلمانوں کی طرح پہلی رات کو اگلے دن کے ساتھ شامل کرلیتے تھے اور یہ ایک شرعی تاکید تھی کہ سبت میں کوئی لاش صلیب پر لٹکی نہ رہے۔ تب یہودیوں نے جلدی سے مسیح کودوچوروں کے ساتھ صلیب پر چڑھا دیا تا شام سے پہلے ہی لاشیں اُتاری جائیں۔ مگر اتفاق سے اُسی وقت ایک سخت آندھی آگئی جس سے سخت اندھیرا ہو گیا۔ یہودیوں کو یہ فکر پڑ گئی کہؔ اب اگر اندھیری میں ہی شام ہو گئی تو ہم اس جرم کے مرتکب ہوجائیں گے جس کا ابھی ذکرکیاگیا ہے۔سو انہوں نے اس فکر کی وجہ سے تینوں مصلوبوں کو صلیب پر سے اُتار لیا۔ اور یاد رکھنا چاہیئے کہ یہ بالاتفاق مان لیا گیاہے ۔کہ وہ صلیب اس قسم کی نہیں تھی جیسا کہ آج کل کی پھانسی ہوتی ہے اورگلے میں رسّہ ڈالکر ایک گھنٹہ میں کام تمام کیاجاتاہے۔بلکہ اس قسم کا کوئی رسّہ گلے میں نہیں ڈالا جاتا تھا صرف بعض اعضاء میں کیلیں ٹھوکتے تھے اور پھر احتیاط کی غرض سے تین تین دن مصلوب بھوکے پیاسے صلیب پر چڑھائے رہتے تھے اور پھر بعد اس کے ہڈیاں توڑی جاتی تھیں اور پھر یقین کیاجاتا تھا کہ اب مصلوب مرگیا۔ مگر خدائے تعالیٰ کی قدرت سے مسیح کے ساتھ ایسا نہ ہوا۔ عید فسح کی کم فرصتی اور عصر کا تھوڑا ساوقت اور آگے سبت کا خو ف اور پھر آندھی کا آجانا ایسے اسباب یکدفعہ پیداہوگئے جس کی وجہ سے چند منٹ میں ہی مسیح کو صلیب پر سے اُتار لیا گیا اوردونوں چور بھی اُتار ے گئے۔ اور پھر ہڈیوں کے توڑنے کے وقت خدائے تعالیٰ نے اپنی قدرت کاملہ کا یہ نمونہ دکھا یا کہ بعض سپاہی پلاطوس کے جن کو درپردہ خواب کا خطرناک انجام سمجھایا گیا تھا و ہؔ اس وقت موجود تھے جن کا مدعا یہی تھا کہ کسی طرح یہ بلا مسیح کے سر پر سے ٹل جائے ایسا نہ ہو کہ مسیح کے قتل ہونے کی وجہ سے وہ خواب سچی ہو جائے جو پلاطوس کی عورت نے دیکھی تھی۔ اور ایسا نہ ہو کہ پلاطوس کسی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 297
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 297
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/297/mode/1up
    بلا میں پڑے۔ سو پہلے انہوں نے چوروں کی ہڈیاں توڑائیں اور چونکہ سخت آندھی تھی اور تاریکی ہو گئی تھی اور ہو اتیز چل رہی تھی اس لئے لوگ گھبرائے ہوئے تھے کہ کہیں جلد گھروں کو جاویں۔ سو سپاہیوں کا اس موقعہ پر خوب داؤ لگا۔ جب چوروں کی ہڈیاں توڑ چکے اور مسیح کی نوبت آئی تو ایک سپاہی نے یونہی ہاتھ رکھ کر کہہ دیا کہ یہ تو مر چکا ہے کچھ ضرور نہیں کہ اس
    کی ہڈیا ں توڑی جائیں۔ اور ایک نے کہا کہ میں ہی اس لاش کو دفن کردوں گا ، اور آندھی ایسی چلی کہ یہودیوں کو اس نے دھکّے دے کر اس جگہ سے نکالا۔ پس اس طور سے مسیح زندہ بچ گیا اورپھر وہ حواریوں کو ملا اور اُن سے مچھلی لے کر کھائی لیکن یہودی جب گھروں میں پہنچے اور آندھی فروہو گئی تو اپنی نا تمام کا رروائی سے شک میں پڑ گئے اور سپاہیوں کی نسبت بھی اُن کے دلوں میں ظن پیداہوگیا۔چنانچہ اب تک عیسائیوں اوریہودیوں کا یہی حال ہے کہ کوئی اُن میں سے قسم کھا کر اور اپنےؔ نفس کے لئے بلا اور عذاب کا وعدہ دے کر نہیں کہہ سکتا کہ مجھے درحقیقت یہی یقین ہے کہ سچ (مچ )مسیح قتل کیا گیا۔یہ شکوک اُسی وقت پیدا ہو گئے تھے اورپولس نے اپنی چالاکی سے کوشش بھی کی کہ ان شکوک کو مٹاوے مگر وہ اَور بھی بڑھتے گئے۔ چنانچہ پولس کے بعض خطوط سے صاف ظاہر ہوتا ہے مسیح جب صلیب پرسے اتارا گیا تو اس کے زندہ ہونے پر ایک اَور پختہ ثبوت یہ پیدا ہو گیا کہ اس کی پسلی کے چھیدنے سے فی الفور اس میں سے خون رواں ہؤا۔ یہودی اپنی شتاب کاری کی وجہ سے اور عیسائی انجیل کی روئداد موجودہ کے لحاظ سے اس شک میں شریک ہیں۔ا ور کوئی عیسائی ایسا نہیں جو انجیل پر غور کرے اورپھر یقینی طور پر یہ اعتقاد رکھے کہ سچ مچ مسیح صلیب کے ذریعہ فوت ہو گیا بلکہ اُن کے دل آج تک شک میں پڑے ہوئے ہیں اور جس کفّارہ کو وہ لئے پھرتے ہیں اس کی ایسے ریگ کے تودہ پر بناء ہے جس کوانجیل کے بیانات نے ہی برباد کردیا ہے۔ سوقرآن کریم کی آیت موصوفہ بالا یعنی یہ کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 298
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 298
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/298/mode/1up
    پیشگوئی کی صورت پر نہیں جیسا کہ ہمارے بھائی مولوی صاؔ حبان جو بڑے علم کا دم مارتے ہیں خیال کررہے ہیں۔ بلکہ یہ تو اس واقعہ کا بیان ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت میں موجود تھا یعنی یہودیوں اورعیسائیوں کے خیالات کی جو اُس وقت حالت تھی خدائے تعالیٰ اتمامًا للحجۃ اُنہیں سُنا رہا ہے اوراُن کے دلوں کی حقیقت اُن پر ظاہر کر رہا ہے اور اُن کو ملزم کر کے انہیں یہ سمجھارہا ہے کہ اگر ہمارا یہ بیان صحیح نہیں ہے تو مقابل پر آکر صاف طور پر دعویٰ کرو کہ یہ خبر غلط بتائی گئی ہے اور ہم لوگ شکوک و شبہات میں مبتلا نہیں ہیں بلکہ یقینی طور پر سمجھ بیٹھے ہیں کہ سچ مچ مسیح مصلوب ہو گیا ہے۔
    اس جگہ یہ بھی یاد رہے کہ آخر آیت میں جو یہ لفظ واقعہ ہے کہ قَبْلَ مَوْتِہٖ اس کلام سے اللہ جلَّ شَانُہٗ کا یہ مطلب ہے کہ کوئی شخص مسیح کی عدم مصلوبیت سے یہ نتیجہ نہ نکال لیوے کہ چونکہ مسیح صلیب کے ذریعہ سے مارا نہیں گیا اس لئے وہ مر ا بھی نہیں۔ سو بیان فرما دیا کہ یہ تمام حال تو قبل از موت طبعی ہے اِس سے اُس موت کی نفی نہ نکال لینا جو بعد اس کے طبعی طور پر مسیح کو پیش آگئی۔ گویا اس آیت میں یوں فرماتا ہے کہ یہود اور نصاریٰ ہمارے اِ س بیان پر بالا تفاق ایمان رکھتے ہیں کہ مسیح یقینی طورپر صلیب کی مو تؔ سے نہیں مرا صرف شکوک و شبہات ہیں۔ سو قبل ا س کے جو وہ لوگ مسیح کی موت طبعی پر ایما ن لاویں جو درحقیقت واقعہ ہو گئی ہے۔ اس موت کے مقدمہ پر اُنہیں ایمان ہے کیونکہ جب مسیح صلیب کی موت سے نہیں مرا جس سے یہود اور نصاریٰ اپنے اپنے اغراض کی وجہ سے خاص خاص نتیجے نکالنے چاہتے تھے تو پھر اُس کی طبعی موت پر بھی ایمان لانا اُن کے لئے ضروری ہے کیونکہ پیدائش کے لئے موت لازمی ہے۔ سو قبل موتہٖ کی تفسیر یہ ہے کہ قبل ایمانہٖ بموتہٖ ۔
    اور دوسرے طور پر آیت کے یہ بھی معنے ہیں کہ مسیح تو ابھی مرابھی نہیں تھا کہ جب سے یہ خیالات شک و شبہ کے یہود و نصاریٰ کے دلوں میں چلے آتے ہیں۔ پس ان معنوں کی رُو سے بھی قرآن کریم بطور اشارۃ النص مسیح کے فوت ہوجانے کی شہادت دے رہاہے غرض قرآن شریف
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 299
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 299
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/299/mode/1up
    میں تین جگہ مسیح کا فوت ہوجانا بیان کیا گیا ہے۔ پھر افسو س کہ ہمارے مولوی صاحبان اُن مقامات پر نظر نہیں ڈالتے اوربعض اُن میں سے بڑی چالاکی سے کہتے ہیں کہ یہ تو ہم نے مانا کہ قرآن کریم یہی فرماتا ہے کہ مسیح فوت ہو گیا مگر کیا اللہ جلَّ شَانُہٗ اس بات پر قادر نہیں کہ پھر ز ندؔ ہ کر کے اس کو دنیا میں لاوے؟ مگر ان علماء کے علم اورفہم پر رونا آتا ہے۔ اے حضرات!ہم نے یہ بھی مانا کہ خدائے تعالیٰ ہریک چیز پر قادر ہے چاہے تو تمام نبیوں کو زندہ کر دیوے مگر آپ سے سوال تو یہ کیا تھا کہ قرآن شریف تو حضرت مسیح کو وفات تک پہنچا کر پھر چُپ ہو گیا ہے اگر آپ کی نظر میں کوئی ایسی آیت قرآن کریم میں ہے جس میں یہ ذکر ہو کہ مسیح کو مارنے کے بعدپھرہم نے زندہ کر دیا تو وہ آیت پیش کیجئے ورنہ یہ قرآن شریف کا مخالفانہ مقابلہ ہے کہ وہ تومسیح کا فوت ہوجانا بیان کرے اورآپ اُس کے برخلاف یہ دعوےٰ کریں کہ مسیح مرا نہیں بلکہ زندہ ہے۔
    بعض علماء نہایت سادگی سے یہ عذر پیش کرتے ہیں کہ اِنّیْ مُتَوَفِّیْکَ کے آگے جو رَافِعُکَ اور 3 ۱؂ قرآن کریم میں آیا ہے اس سے زندہ ہوجانا ثابت ہوتا ہے اور کہتے ہیں کہ اگر یہ معنے سچ نہیں تو پھر بجُز مسیح کے اور کسی کے حق میں رَافِعُکَ کا لفظ کیوں نہیں آیا؟ مگر میں اسی رسالہ ازالہ اوہام میں اِن تمام وہموں کا مفصّل جواب لکھ چکا ہوں کہ رفع سے مراد روح کا عزت کے ساتھ اُٹھائے جانا ہے۔جیسا کہ وفات کے بعد بموجب نص قرآن اور حدیث صحیحؔ کے ہر یک مومن کی روح عزت کیساتھ خدائے تعالیٰ کی طرف اُٹھائی جاتی ہے اور مسیح کے رفع کا جو اس جگہ ذکر کیا گیا تو اس کی وجہ یہ ہے کہ مسیح کو دعوتِ حق میں قریبًا ناکامی رہی اوریہودیوں نے خیال کیا کہ یہ کاذب ہے کیونکہ ضرور تھا کہ سچے مسیح سے پہلے ایلیا آسمان سے نازل ہو سوانہوں نے اس سے انکار کیا کہ مسیح کا اورنبیوں کی طرح عزت کے ساتھ خدائے تعالیٰ کی طرف رفع ہو بلکہ اس کو نعوذ باللہ *** قراردیا اور *** اس کو کہتے ہیں جس کو عزت کے ساتھ رفع نصیب نہ ہو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 300
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 300
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/300/mode/1up
    سو خدائے تعالیٰ کو منظور تھا کہ یہ الزام مسیح کے سر پر سے اُٹھاوے۔ سو اوّل اس نے اس بنیاد کو باطل ٹھہرایا جس بنیادپر حضرت مسیح کا *** ہونا نابکار یہودیوں اور عیسائیوں نے اپنے اپنے دلوں میں سمجھ لیا تھا اور پھر بعد ا س کے بتصریح یہ بھی ذکر کر دیا کہ مسیح نعوذ باللہ ملعون نہیں جو رفع سے روکا گیا ہے بلکہ عزت کے ساتھ اس کا رفع ہوا ہے۔ چونکہ مسیح ایک بے کس کی طرح دنیا میں چند روزہ زندگی بسرکرکے چلا گیا اوریہودیوں نے اس کی ذلّت کے لئے بہت ساغلوکیا۔ اُس کی والدہ پر ناجائز تہمتیں لگائیں اور اس کو ملعون ٹھہرایا اور راستبازوں کی طرح اُس کے رفع سے انکارکیا۔ اور نہ صرف یہو دؔ یوں نے بلکہ عیسائی بھی مؤخر الذکر خیال میں مبتلا ہوگئے اور کمینگی کی راہ سے اپنی نجات کا یہ حیلہ نکالا کہ ایک راستباز کو ملعون ٹھہراویں اور یہ خیال نہ کیا کہ اگر مسیح کے ملعون ہونے پرہی نجات موقوف ہے اور تبھی نجات ملتی ہے کہ مسیح جیسے ایک راستباز پاک روش خدائے تعالیٰ کے پیارے کو *** ٹھہرایاجاوے تو َ حیف ہے ایسی نجات پر۔ اس سے تو ہزار درجہ دوزخ بہتر ہے۔ غرض جب مسیح کے لئے دونوں فریق یہود و نصاریٰ نے ایسے دُوراز ادب القاب روا رکھے تو خدائے تعالیٰ کی غیرت نے نہ چاہاکہ اس پاک رو ش کی عزت کو بغیر شہادت کے چھوڑ دیوے۔ سو اس نے جیسا کہ انجیل میں پہلے سے وعدہ دیا گیا تھا ہمارے سیّد ومولیٰ ختم المرسلین کو مبعوث فرما کر مسیح کی عزت اور رفع کی قرآن کریم میں شہادت دی۔ رفع کا لفظ قرآن کریم میں کئی جگہ واقع ہے ایک جگہ بلعم کے قصّہ میں بھی ہے کہ ہم نے اس کا رفع چاہا مگر و ہ زمین کی طرف جھک گیا۔اورایک ناکام نبی کی نسبت اس نے فرمایا 33 ۱؂ درحقیقت یہ بھی ایک ایسانبی ہے جس کی رفعت سے لوگوں نے انکارکیا تھا۔ اورچونکہ اس عاجز کی بھی مسیح کی طرح ذلّت کی گئی ہےؔ کوئی کافرکہتا ہے اور کوئی مُلحد اور کوئی بے ایمان نام رکھتا ہے اور فقیہ اورمولوی صلیب دینے کو بھی تیار ہیں جیساکہ میاں عبد الحق اپنے اشتہار میں لکھتے ہیں کہ اس شخص کے لئے مسلمانوں کو کچھ ہاتھ سے بھی کام لینا چاہیئے۔لیکن پلاطوس سے زیادہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 301
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 301
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/301/mode/1up
    یہ گورنمنٹ بے گناہ کی رعایت رکھتی ہے اورپلاطوس کی طرح رعیت کے رُعب میں نہیں آتی مگر ہماری اس قوم نے ذلیل کرنے کے لئے کوئی دقیقہ باقی نہیں رکھا۔ تادونوں طرف سے مشابہت ثابت کرکے دکھادیوے۔ انہیں الہام بھی ہوگئے کہ یہ جہنمی ہے آخر جہنّم میں پڑے گا اور اُن میں داخل نہیں ہو گا جن کاعزت کے ساتھ خدائے تعالیٰ کی طرف رفع ہوتا ہے۔ سو آج مَیں اُس الہام کے معنی سمجھا جو اس سے کئی سال پہلے براہین میں درج ہو چکا ہے اور وہ یہ ہے3333 ۱؂ یعنی یہ مولو ی صاحبان عبدالرحمان و عبد الحق تو مجھے اس وقت قطعی دوزخی بناتے ہیں لیکن اُن کے اس بیان سے دس سال پہلے خدائے تعالیٰ مجھے جنّتی ہونے کا وعدہ دے چکا ہے اور جس طرح یہودیوں نے خیال کیا تھا کہ نعوذ باللہ عیسیٰ مسیح *** ہے اورہرگز عزت کے ساتھ اس کا رفع نہیں ہو گا اور اُن کے ردّ میں یہ آیت نازل ہوئی تھی اِنِّیْ مُتَوَفِّیْکَ وَرَافِعُکَ اِلَیَّ۔ اِسی طرح خدائے تعالیٰ نے اس جگہ بھی پہلے سے ہی اپنے علم قدیم کی وجہ سے یہ الہام بطور پیشگوئی اس عاجز کے دل پر القا کیا چونکہ وہ جانتا تھا کہ چندسال کے بعدمیاں عبدالحق اور میاں عبدالرحمن اُسی طرح اس عاجز کو *** ٹھہرائیں گے جس طرح یہودیوں نے حضرت مسیح کو ٹھہرایا تھا اِس لئے اُس نے پیش از وقوع اس پیشگوئی کو براہین میں درج کرا کر گویا سارے جہان میں مشہور کردیا۔ تا اس کی قدرت و حکمت ظا ہر ہو اور تایہ بھی معلوم ہو کہ جس طرح مسیح کے عہد کے مولویوں نے اس کو *** سمجھا اور اس کے بہشتی ہونے سے انکار کیا ؔ اور اس کا عزت کے ساتھ خدائے تعالیٰ کی طرف رفع ہونااور راستبازوں کی جماعت میں جاملنا قبول نہ کیا ایسا ہی اس عاجز کے ہم مذہب مولویوں نے اس ناکارہ کو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 302
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 302
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/302/mode/1up
    خدائے تعالیٰ کی رحمت سے محروم کرنا چاہا۔ اور سخت گنہگار مومنوں کی بھی کسی قدر عزت ہوتی ہے مگر انہوں نے کچھ بھی پروانہ رکھ کر عام طور پر یہ تقریریں کیں اورخط لکھے اور اشتہار شائع کئے۔ سو خدائے تعالیٰ نے اس مشابہت کے پیدا کرنے کے لئے اُن سے ایک کام لیا ہے اور دوزخی یا بہشتی ہونے کی اصل حقیقت تو مرنے کے بعد ہریک کو معلوم ہوگی جس وقت بعض بصد حسرت دوزخ میں پڑے ہوئے کہیں گے 33 ۱؂
    عیب رِنداں مکن اے زاہد پاکیزہ سرشت
    توچہ دانی کہ پس پردہ چہ خوب ست و چہ زشت
    اب حاصل کلا م یہ ہے کہ جو رفع کا لفظ حضرت مسیح کے لئے قرآن کریم میں آیا ہے وہی لفظ الہام کے طور پر اس عاجز کے لئے بھی خدائے تعالیٰ نے فرمایا ہے۔
    ا گر کوئیؔ یہ اشکال پیش کرے کہ مسیح تو انجیل میں کہتا ہے کہ ضرور ہے کہ میں مارا جاؤں اور تیسرے دن جی اٹھوں تو بیان مذکورہ بالا کیوں کر اس کے مطابق ہو۔ اس کا جواب یہ ہے کہ اس موت سے حقیقی موت مراد نہیں ہے بلکہ مجازی موت مرادہے۔ یہ عام محاورہ ہے کہ جو شخص قریب مرگ ہو کر پھربچ جائے اس کی نسبت یہی کہا جا سکتا ہے کہ وہ نئے سرے سے زندہ ہوا مسیح پر جو یہ مصیبت آئی کہ وہ صلیب پر چڑھایا گیا اور کِیلیں اُس کے اعضاء میں ٹھوکی گئیں جن سے وہ غشی کی حالت میں ہو گیا یہ مصیبت درحقیقت موت سے کچھ کم نہیں تھی اور عام طور پر یہ بول چال ہے کہ جو شخص ایسی مصیبت تک پہنچ کر بچ جائے اس کی نسبت یہی کہتے ہیں کہ وہ مر مر کر بچااوراگر وہ کہے کہ میں تو نئے سرے زندہ ہوا ہوں تو اس بات کو کچھ جھوٹ یا مبالغہ خیال نہیں کیا جاتا۔
    اور اگر یہ سوال ہو کہ کونسا قرینہ خاص مسیح کے لفظ کا اس بات پر ہے کہ اس موت سے مراد حقیقی موت مراد نہیں ہے۔ تو اس کا جواب یہ ہے کہ یہ قرینہ بھی خود حضرت مسیح نے فرمایا ہے جبکہ فقیہ اور فریسی اور یہودیوں کے مولوی اکٹھے ہو کر اس کے پاس گئے کہ تو نے مسیح ہونے کا تو دعویٰ کیا پر اس دعویٰ کو ہم کیوں کر بغیر معجزہ کے مان لیں۔ تو حضرت مسیح نے اُن فقیہوں اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 303
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 303
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/303/mode/1up
    مولویوں کو جواب دیا کہ اسؔ زمانہ کے حرامکا ر لوگ مجھ سے معجزہ مانگتے ہیں لیکن اُن کو بجُز یونس نبی کے معجزہ کے اور کوئی معجزہ نہیں دکھایا جائے گا۔
    یعنی یہ معجزہ دکھایا جائے گا کہ جیسے یونس نبی تین دن مچھلی کے پیٹ میں زندہ رہا اور مرا نہیں۔ایسا ہی قدرت الٰہی سے مسیح بھی تین دن تک بحالت زندگی قبر میں رہے گا اور نہیں مرے گا۔
    اب خیال کرنا چاہیئے کہ اگر مسیح کے الفاظ مذکورہ بالاکو حقیقی موت پر حمل کر لیں تو یہ معجزہ یونس کی مشابہت کا باطل ہو جائے گا کیونکہ یونس مچھلی کے پیٹ میں بحالت زندگی رہا تھا نہ مردہ ہو کر۔ سواگر مسیح مرگیا تھا اورموت کی حالت میں قبر میں داخل کیا گیا تو اس کو یونس کے اس واقعہ سے کیا مشابہت۔اور یونس کے واقعہ کو اسکے اس واقعہ سے کیا مناسبت؟ اورمُردوں کو زندوں سے کیا مماثلت سو یہ کافی اورکامل قرینہ ہے کہ مسیح کا یہ کہنا کہ میں تین دن تک مروں گا حقیقت پر محمول نہیں بلکہ اس سے مجازی موت مراد ہے جو سخت غشی کی حالت تھی۔
    اور اگر یہ عذر پیش ہو کہ مسیح نے مصلوب ہونے کے وقت یہ بھی کہا تھا کہ آج میں بہشت میں داخل ہو ں گا، پس اس سے صفائی کے ساتھؔ مسیح کا فوت ہونا ثابت ہوتا ہے۔ سو واضح ہو کہ مسیح کو بہشت میں داخل ہونے اور خدائے تعالیٰ کی طرف اُٹھائے جانے کا وعدہ دیا گیا تھامگر وہ کسی اور وقت پر موقوف تھا جو مسیح پر ظاہر نہیں کیا گیا تھا جیسا کہ قرآن کریم میں انّی متوفیک ورافعک الیّ وارد ہے۔ سو اُس سخت گھبراہٹ کے وقت میں مسیح نے خیال کیا کہ شاید آج ہی وہ وعدہ پورا ہو گا۔چونکہ مسیح ایک انسان تھا اور اس نے دیکھا کہ تمام سامان میرے مرنے کے موجود ہو گئے ہیں لہٰذا اس نے برعایتِ اسباب گمان کیا کہ شاید آج میں مر جاؤں گا۔ سو بباعث ہیبت تجلّی جلالی حالت موجودہ کو دیکھ کر ضعف بشریت اُس پر غالب ہوگیا تھا تبھی اس نے دل برداشتہ ہو کر کہا ایلی ایلی لما سبقتنی یعنی اے میرے خدا !اے میرے خدا!
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 304
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 304
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/304/mode/1up
    تُو نے مجھے کیوں چھوڑ دیا اور کیوں اس وعدہ کا ایفاء نہ کیا جو تُو نے پہلے سے کررکھا تھا کہ تُو مرے گا نہیں بلکہ یونس کی طرح تیرا حال ہوگا۔ اگر کہاجائے کہ خدائے تعالیٰ کے وعد ۂ حفاظت میں مسیح نے کیوں شک کیا سو واضح ہو کہ یہ شک ضعف بشریت سے ہے۔ جلالی تجلّی کے سامنے بشریت کی کچھ پیش نہیں جاتی۔ ہریک نبی کو خدائے تعالیٰ یہ دن دکھاتا ہے۔ اوّلؔ وہ کوئی وعدہ بشارت اپنے نبی کو دیتاہے اورپھر جب وہ نبی اس وعدہ پر خوش ہوجاتا ہے تو ابتلا کے طور پر چاروں طرف سے ایسے موانع قائم کر دیتاہے کہ جو نومیدی اور ناکامی پر دلالت کرتے ہوں بلکہ قطع اور یقین کی حد تک پہنچ گئے ہوں جیسا کہ خدائے تعالیٰ نے ایک طرف تو ہمارے سیّد و مولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو بدرکی لڑائی میں فتح اور نصرت کی بشارت دی اور دوسری طرف جب لڑائی کا وقت آیا تو پھر پتہ لگا کہ مخالفوں کی اس قدر جمعیت ہے کہ بظاہر کامیابی کی امید نہیں۔ تب آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو سخت کرب و قلق ہوا اور جناب الٰہی میں رو رو کر دعائیں کیں کہ یا الٰہی اس گروہ کو فتح بخش اور اگر تُو فتح نہیں دے گا اور ہلاک کر دے گا تو پھر قیامت تک کوئی تیری پرستش نہیں کرے گا۔سو یہ الفاظ درحقیقت اس بات پر دلالت نہیں کرتے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم پیشگوئی کی نسبت شک میں پڑ گئے تھے بلکہ حالات موجودہ کو خلاف مراددیکھ کر خدائے تعالیٰ کے غنائے ذاتی پر نظر تھی اور اس کی جلالی ہیبت سے متأثر ہو گئے تھے اور درحقیقت ہریک جگہ جو قرآن شریف میں نبی کریم کو کہا گیا ہے کہ تُو ہمارے وعدہ میں شک مت کر وہ سب مقامات اِسی قسمؔ کے ہیں جن میں بظاہر سخت ناکامی کی صورتیں پیدا ہو گئی تھیں اور اسباب مخالفہ نے ایسا رُعب ناک اپنا چہرہ دکھلایا تھا جن کو دیکھ کر ہریک انسان ضعف بشریت کی وجہ سے حیران ہوجاتا ہے۔ سو اِ ن وقتوں میں نبی کریم کو بطور تسلی دہی کے فرمایا گیا کہ اگرچہ حالت نہایت نازک ہے مگر تو بباعث ضعف بشریت شک مت کر یعنی یہ خیال مت کر کہ شاید اس پیشگوئی کے اور معنے ہوں گے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 305
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 305
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/305/mode/1up
    راقم رسالہ ہذا اس مقام میں خود صاحبِ تجربہ ہے۔ عرصہ قریبًا تین برس کا ہوا ہے کہ بعض تحریکات کی وجہ سے جن کا مفصل ذکر اشتہار دہم جولائی ۱۸۸۸ ؁ء میں مندرج ہے خدائے تعالیٰ نے پیشگوئی کے طورپر اس عاجز پر ظاہر فرمایاکہ مرز ااحمد بیگ ولد مرزا گاماں بیگ ہوشیارپوری کی دختر کلاں انجام کار تمہارے نکا ح میں آئے گی اور وہ لوگ بہت عداوت کریں گے اور بہت مانع آئیں گے اور کوشش کریں گے کہ ایسانہ ہو لیکن آخر کار ایسا ہی ہو گا اور فرمایا کہ خدائے تعالیٰ ہر طرح سے اس کو تمہاری طرف لائے گا باکرہ ہونے کی حالت میں یا بیوہ کرکے اور ہریک روک کو درمیان سے اٹھا وے گا اور اس کام کو ضرور پورا کرے گا کوئی نہیں جو اُس کو روکؔ سکے۔ چنانچہ اس پیشگوئی کا مفصل بیان معہ اس کی میعاد خاص اور اس کے اوقات مقر ر شدہ کے اور معہ اس کے اُن تمام لوازم کے جنہوں نے انسان کی طاقت سے اُس کو باہر کردیا ہے اشتہار دہم جولائی ۱۸۸۸ ؁ء میں مندرج ہے اور وہ اشتہار عام طورپر طبع ہو کر شائع ہو چکا ہے جس کی نسبت آریوں کے بعض منصف مزاج لوگوں نے بھی شہادت دی کہ اگر یہ پیشگوئی پوری ہو جائے تو بلاشبہ یہ خدائے تعالیٰ کا فعل ہے۔ اور یہ پیشگوئی ایک سخت مخالف قوم کے مقابل پر ہے جنہوں نے گویا دشمنی اور عناد کی تلواریں کھینچی ہوئی ہیں اورہریک کو جو اُن کے حال سے خبر ہو گی وہ اس پیشگوئی کی عظمت خوب سمجھتاہوگا۔ ہم نے اس پیشگوئی کو اس جگہ مفصل نہیں لکھا تابار بار کسی متعلق پیشگوئی کی دل شکنی نہ ہو لیکن جو شخص اشتہار پڑھے گا وہ گو کیسا ہی متعصّب ہوگا اس کو اقرار کرنا پڑے گا کہ مضمون اس پیشگوئی کا انسان کی قدرت سے بالاتر ہے اور اس بات کا جواب بھی کامل اور مسکت طور پر اسی اشتہار سے ملے گا کہ خدائے تعالیٰ نے کیوں یہ پیشگوئی بیان فرمائی اور اس میں کیا مصالح ہیں۔ اورکیوں اور کس دلیل سے یہ انسانی طاقتوں سے بلند ترہے۔
    ابؔ اس جگہ مطلب یہ ہے کہ جب یہ پیشگوئی معلوم ہوئی اور ابھی پوری نہیں ہوئی تھی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 306
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 306
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/306/mode/1up
    (جیسا کہ اب تک بھی جو ۱۶؍اپریل ۱۸۹۱ ؁ء ہے پوری نہیں ہوئی ) تو اس کے بعد اس عاجز کو ایک سخت بیماری آئی یہاں تک کہ قریب موت کے نوبت پہنچ گئی بلکہ موت کو سامنے دیکھ کر وصیت بھی کر دی گئی۔ اُس وقت گویا یہ پیشگوئی آنکھوں کے سامنے آگئی اور یہ معلوم ہورہا تھا کہ اب آخری دم ہے اور کل جنازہ نکلنے والاہے۔ تب میں نے اس پیشگوئی کی نسبت خیال کیاکہ شاید اس کے اَور معنے ہوں گے جو میں سمجھ نہیں سکا۔ تب اُسی حالت قریب الموت میں مجھے الہام ہوا الحق من ربک فلا تکوننّ من الممترین یعنی یہ بات تیرے رب کی طرف سے سچ ہے تو کیوں شک کرتا ہے۔ سو اُس وقت مجھ پر یہ بھید کھلا کہ کیوں خدائے تعالیٰ نے اپنے رسول کریم کو قرآن کریم میں کہا کہ تُو شک مت کر۔ سو میں نے سمجھ لیا کہ درحقیقت یہ آیت ایسے ہی نازک وقت سے خاص ہے جیسے یہ وقت تنگی اور نومیدی کا میرے پر ہے اورمیرے دل میں یقین ہوگیا کہ جب نبیوں پر بھی ایسا ہی وقت آجاتا ہے جو میرے پر آیا تو خدائے تعالیٰ تازہ یقین دلانے کے لئے اُن کو کہتا ؔ ہے کہ تو کیوں شک کرتا ہے اور مصیبت نے تُجھے کیوں نوامید کردیا تُو نوامید مت ہو۔
    (۵) سوال:۔ ابن مریم کے اُترنے کا ذکر جو احادیث میں موجود ہے کسی نے سلف اور خلف میں سے اس کی یہ تاویل نہیں کی کہ ابن مریم کے لفظ سے جو ظاہر طورپر حضرت عیسیٰ مسیح سمجھا جاتا ہے درحقیقت یہ مراد نہیں ہے بلکہ کوئی اس کا مثیل مراد ہے۔ ما سوا اس کے اس بات پر اجماع ہے کہ نصوص کو ظاہر پر حمل کیا جائے اور بغیر قرائن قویہ کے باطن کی طرف نہیں پھیرنا چاہیئے۔
    امّاالجوب۔ پس واضح ہو کہ سلف اور خلف کے لئے یہ ایک ایمانی امر تھا جو پیشگوئی کو اجمالی طور پر مان لیا جائے انہوں نے ہرگز یہ دعویٰ نہیں کیا کہ ہم اس پیشگوئی کی تہ تک پہنچ گئے ہیں اور درحقیقت ابن مریم سے ابن مریم ہی مرادہے۔ اگراُن کی طرف سے ایسا دعویٰ ہوتا تو وہ دجّال کے فوت ہوجانے کے قائل نہ ہوتے اور نہ قرآن شریف کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 307
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 307
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/307/mode/1up
    اُن مقامات کو جن میں مسیح کی موت کا ذکر ہے یونہی بحث سے خارج سمجھ کر خاموشی اختیار کرتے اور اگر فرض کے طور پر یہ بھی مانؔ لیں کہ کوئی صحابہ میں سے یہی سمجھ بیٹھا تھا کہ ابن مریم سے ابن مریم ہی مراد ہے تو تب بھی کوئی نقص پیدانہیں ہوتا۔ کیونکہ پیشگوئیوں کے سمجھنے میں قبل اس کے جوپیشگوئی ظہور میں آوے بعض اوقات نبیوں نے بھی غلطی کھائی ہے پھر اگر کسی صحابی نے غلطی کھائی تو کون سے بڑے تعجب کی بات ہے۔ ہمارے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی فراست اورفہم تمام اُمت کی مجموعی فراست اور فہم سے زیادہ ہے بلکہ اگر ہمارے بھائی جلدی سے جوش میں نہ آجائیں تو میرا تو یہی مذہب ہے جس کو دلیل کے ساتھ پیش کرسکتا ہوں کہ تمام نبیوں کی فراست اور فہم آپ کی فہم اور فراست کے برابر نہیں۔مگر پھر بھی بعض پیشگوئیوں کی نسبت آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے خود اقرار کیا ہے کہ میں نے اُن کی اصل حقیقت سمجھنے میں غلطی کھائی میں پہلے اس سے چند دفعہ لکھ چکا ہوں کہ آنحضر ت صلی اللہ علیہ وسلم نے صاف طورپر فرما دیاتھا کہ میری وفات کے بعد میری بیبیوں میں سے پہلے وہ مجھ سے ملے گی جس کے ہاتھ لمبے ہوں گے چنانچہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے رُوبرو ہی بیبیوں نے باہم ہاتھ ناپنے شروع کردئے چونکہ آنحضرت صلیؔ اللہ علیہ وسلم کو بھی اس پیشگوئی کی اصل حقیقت سے خبر نہ تھی اس لئے منع نہ کیا کہ یہ خیال تمہارا غلط ہے۔ آخر اس غلطی کو پیشگوئی کے ظہور کے وقت نے نکالا۔ اگر زمانہ اُن بیبیوں امّہات المؤمنین کو مہلت دیتا اور وہ سب کی سب ہمارے اِس زمانہ تک زندہ رہتیں تو صاف ظاہر ہے کہ صحابہ کے عہد سے لے کر آج تک تمام اُمت کا اِسی بات پر اتفاق ہوجاتا کہ پہلے لمبے ہاتھ والی بی بی فوت ہوگی اورپھرظہور کے وقت جب کوئی اَور ہی بیوی پہلے فوت ہوجاتی جس کے اَوروں کی نسبت لمبے ہاتھ نہ ہوتے تو اس تمام اجماع کو کیسی خجالتیں اُٹھانی پڑتیں اورکس طرح ناحق نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ہتک کراتے اوراپنے ایمان کو شبہات میں ڈالتے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 308
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 308
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/308/mode/1up
    اس وقت مجھے اپنے ایک دوست کی بات یاد آئی ہے۔ خدا اس کو غریق رحمت کرے نام اس مرحوم کا حافظ ہدایت علی تھا اور یہ کسی زمانہ میں ضلع گورداسپور کے اکسٹرا اسسٹنٹ تھے اور مدّت تک بٹالہ میں تحصیلدار بھی رہے ایک جلسہ میں انہوں نے فرمایا کہ جس قدر بعض امورکے ظہور کا آخری زمانہ کے بارے میں وعدہ دیا گیا ہے اور بعضؔ پیشگوئیاں فرمائی گئی ہیں ہمیں اُن کی نسبت یہ اعتقاد نہیں رکھنا چاہیئے کہ وہ ضرور اپنی ظاہری صورت میں ہی ظہور پذیر ہوں گی۔ تا اگرآئندہ اُن کی حقیقت کسی اَور طور پرکھلے تو ہم ٹھوکر نہ کھاویں۔ اور ہمارا ایمان سلامت رہ جائے۔ اورکہاکہ چونکہ غالبًا ہم اُسی زمانہ میں پیداہوئے ہیں جس کو آج سے کچھ کم تیرہ سو برس پہلے آخری زمانہ کے نام سے یادکیا گیا ہے۔ اس لئے کچھ تعجب نہیں کہ ان میں سے بعض پیشگوئیاں ہماری ہی زندگی میں ظاہر ہوجائیں۔ سو ہمیں اجمالی ایمان کا اصول محکم پکڑنا چاہیئے اور کسی شق پر ایسا زور نہیں دینا چاہیئے جیساکہ اس حالت میں دیاجاتا ہے کہ جب ایک حقیقت کی تہ تک ہم پہنچ جاتے ہیں۔تمّ کلامہ‘
    اور واقعی یہ سچ اور بالکل سچ ہے کہ اُمت کے اجماع کو پیشگوئیوں کے امور سے کچھ تعلق نہیں اور ہمارے حال کے مولویوں کو یہ سخت دھوکا لگاہوا ہے کہ پیشگوئیوں کو بھی جن کی اصل حقیقت ہنوز درپردۂ غیب ہے اجماع کے شکنجہ میں کھینچنا چاہتے ہیں۔
    دراصل پیشگوئیاں حاملہ عورتوں سے مشابہت رکھتی ہیں اورمثلًا ہم ایکؔ حاملہ عورت کی نسبت یہ تو کہہ سکتے ہیں کہ اس کے پیٹ میں کوئی بچہ ضرور ہے اور یقینًا وہ نو مہینے اور دس دن کے اند ر اندر پیدا بھی ہوجائے گا مگر یہ نہیں کہہ سکتے کہ وہ کیا شکل رکھتا ہے اور اس کی حالت جسمی کیسی ہے اور اس کے نقوش چہرہ کس طرز کے واقع ہیں اور لڑکا ہے یا بلاشبہ لڑکی ہے۔
    شاید اس جگہ کسی کے دل میں یہ اعتراض خلجان کرے کہ اگر پیشگوئیوں کا ایسا ہی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 309
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 309
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/309/mode/1up
    حال ہے تو لائق اعتبار نہ رہیں اور اس لائق نہ رہیں کہ نبی کی صدقِ نبوت پر بطور دلیل اور شاہد ناطق کے تصّور کی جائیں یا کسی مخالف منکر کے سامنے پیش کی جائیں تو اس کا جواب یہ ہے کہ یہ بات کہ پیشگوئیاں کبھی اپنے ظاہر پرہی پوری ہوجاتی ہیں اورکبھی باطنی طور پر اُن کا ظہور ہوتا ہے۔ اس سے ربانی پیشگوئیوں کی عظمت میں کچھ بھی فرق نہیں آتا بلکہ باریک بینوں کی نظر میں اور بھی عظمت کھلتی ہے۔کیا اگر ایک فلاسفر کا قول کوئی موٹی عقل کا آدمی اُلٹے طورپر سمجھ لیوے اور پھر اس کے معقول معنے جو نہایت مدلل اور ثابت شدہ ہیں کھل جائیں تو اس غلطی سے ان صحیح معنوں کو کچھ حر ج ؔ پہنچ سکتاہے ؟ ہرگز نہیں۔
    ماسوا اس کے پیشگوئیوں میں ایک قدرِ مشترک بہرحال ایساباقی رہتا ہے کہ خواہ وہ حقیقت پر محمول سمجھی جائیں اور یا بالآخر کوئی مجازی معنے نکل آویں وہ قدر مشترک بدیہی طورپر ظاہر کردیتا ہے کہ یہ پیشگوئی درحقیقت سچی اور انسانی طاقتوں سے بالاتر ہے۔
    علاوہ اس کے جن پیشگوئیوں کومخالف کے سامنے دعویٰ کے طورپر پیش کیاجاتا ہے وہ ایک خاص طور کی روشنی اور بداہت اپنے اندر رکھتی ہیں اور ملہم لوگ حضرت احدیت میں خاص طورپر توجہ کر کے اُن کا زیادہ تر انکشاف کرالیتے ہیں مگر معمولی طورپر بہت کچھ چھپے ہوئے گوشے پیشگوئیوں کے ہوتے ہیں۔ اور یہ سراسر نادانی کی ضد ہے کہ ایسا خیال کیا جائے کہ خواہ نخواہ پیشگوئی حقیقت پر محمول ہوا کرتی ہے۔ جس نے یہودیوں اور عیسائیوں کی کتابوں کو دیکھا ہوگا وہ اس بات کو خوب جانتا ہو گا کہ کِس قدر پیشگوئیوں میں استعارات اُن کتابوں نے استعمال کئے ہیں۔ یہاں تک کہ بعض مواضع میں دن ذکر کر کے اُس سے برس مراد لیا ہے۔ درحقیقت پیشگوئیاں از قبیل مکاشفات ہوتی ہیں اور اس چشمہ سے نکلتی ہیں جو استعارات کے رنگ سے بھرا ہوا ہے اپنیؔ خوابوں کو دیکھو کیا کوئی سیدھے طورپر بھی خواب آتی ہے۔ مگر شاذونادر۔ایسا ہی خدائے تعالیٰ مکاشفات کو استعارات کی خلعت سے آراستہ کرکے اپنے نبیوں کی معرفت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 310
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 310
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/310/mode/1up
    ظاہر کرتاہے سو اس صداقت کے قبول کرنے کا نام الحاد رکھنا خود الحاد ہے۔ کیونکہ الحاد اسی کو کہتے ہیں کہ ایک معنے اپنے اصل سے پھیرے جائیں۔ سو جبکہ خدائے تعالیٰ کے قانون قدرت نے مکاشفات اوررؤیائے صالحہ کے لئے یہی اصل مقرّر کردیاہے کہ وہ اکثر استعارات سے پُر ہوتے ہیں تو اس اصل سے معنے کو پھیرنا اور یہ دعویٰ کرنا کہ ہمیشہ پیشگوئیاں ظاہرپر ہی محمول ہوتی ہیں اگر الحاد نہیں تو اور کیا ہے ؟ صوم اور صلوٰۃ کی طرح پیشگوئی کو بھی ایک حقیقت منکشفہ سمجھنا بڑی غلطی اور بڑا بھارا دھوکہ ہے۔ یہ احکام تو وہ ہیں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے کر کے دکھلادئے اور بکلّی اُن کا پردہ اُٹھادیا۔مگر کیا ان پیشگوئیوں کے حق میں بھی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے یہی فرمایا ہے کہ یہ من کل الوجوہ مکشوف ہیں اور ان میں کوئی ایسی حقیقت اور کیفیت مخفی نہیں جو ظہور کے وقت سمجھ آسکے اگر کوئی ایسی حدیث صحیح موجود ہے تو کیوں پیشؔ نہیں کی جاتی۔آپ لوگ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے زیادہ علم و فراست نہیں رکھتے۔صحیح بخاری کی حدیث کو دیکھو کہ جب آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو ایک ابریشم کے ٹکڑہ پر حضرت عائشہ صدیقہ کی تصویر دکھائی گئی کہ یہ تیرے نکاح میں آئے گی تو آپ نے ہر گز یہ دعویٰ نہ کیا کہ عائشہ سے در حقیقت عائشہ ہی مراد ہے۔بلکہ آپ نے فرمایا کہ اگر درحقیقت اس عائشہ کی صورت سے عائشہ ہی مراد ہے تو وہ مل ہی رہے گی ورنہ ممکن ہے کہ عائشہ سے مراد کوئی اَور عورت ہو۔آپ نے یہ بھی فرمایا کہ ابوجہل کے لئے مجھے بہشتی خوشہ انگور دیا گیا مگر اس پیشگوئی کا مصداق عکرمہ نکلا۔ اورجب تک خدائے تعالیٰ نے خاص طور پر تمام مراتب کسی پیشگوئی کے آپ پر نہ کھولے تب تک آپ نے اُس کی کسی شق خاص کا کبھی دعویٰ نہ کیا۔
    آپ لوگ جانتے ہیں کہ جب ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے ابو جہل سے شرط لگائی اور قرآن شریف کی وہ پیشگوئی مدار شرط رکھی کہ اور تین برس کا عرصہ ٹھہرایا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 311
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 311
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/311/mode/1up
    تو آپ پیشگوئی کی صورؔ ت کو دیکھ کر فی الفور دور اندیشی کو کام میں لائے اور شرط کی کسی قدر ترمیم کرنے کے لئے ابو بکر صدیق کو حکم فرمایا اورفرمایاکہ بضع سنین کا لفظ مجمل ہے اور اکثر نو برس تک اطلاق پاتا ہے۔
    ایسا ہی آپ نے اُمّت کے سمجھانے کے لئے بعض پیشگوئیوں کے سمجھنے میں خود اپنا غلطی کھانا بھی ظاہر فرمایا۔ اب کیا یہ تعلیم نبوی کافی نہیں اور کیا یہ تعلیم بآواز بلند نہیں بتلا رہی کہ پیشگوئیوں پر اجمالی طور پر ایمان لاؤ اور اُن کی اصل حقیقت حوالہ بخدا کرو۔اُمّت محمدیہ میں تفرقہ مت ڈالو اور تقویٰ کا طریق اختیار کرلو۔
    اے حضرات ! اکیلے اکیلے اپنے گھروں میں بیٹھ کر فکر کرو۔ اوراپنے بستروں پر لیٹے ہوئے سادگی سے میری بات کو سوچو۔قبرستان میں جاؤ اور اپنی موت کو یاد کر کے ایک بے غبار نظر اپنے لئے لاؤ اور خوب دیکھ لو کہ تقو یٰ کا کونسا طریق ہے اور احتیاط اور خداترسی کی کونسی راہیں ہیں ؟ اگر آپ پر یہ بات مشتبہ ہے جو میں نے پیش کی ہے تو کیا آپ لوگوں کا اس بات میں بھی کچھ حرج ہے کہ آپ اجمالی طور پر اپنے ایمان پر قائم رہیں اور اسؔ کی تفاصیل مخفیہ میں خواہ نخواہ دخل نہ دیں اورمجھے میرے خدائے تعالیٰ کے ساتھ چھوڑ دیں۔میں کسی پر جبر نہیں کرتا۔ایک تبلیغ ہے چاہے کوئی سنے یا نہ سنے اگر کسی کو خدائے تعالیٰ یقین بخشے اور وہ مجھے پہچان لے اور میری باتوں کو مان لیوے تو وہ میرا خاص طور پر بھائی ہے اور اس کو بلا شبہ اپنے ایمان کا اجر ہے۔لیکن اگر آپ لوگ اتنا بھی کریں کہ اس پیشگوئی کے دقائق مخفیہ کو خدائے تعالیٰ کے سپرد کر رکھیں اور ایمان کی حد پر ٹھہرے رہیں اور خواہ نخواہ کامل عرفان کا دعویٰ نہ کریں تو سوچو اسمیں آپ کے لئے خرابی کیا ہے اور عند اللہ کونسا مؤاخذہ ہے؟ کیا اگر آپ ایسا کریں تو اس سے آپ کو مؤاخذہ ہو گا ؟ لیکن اگر آپ اپنے ایمان کی حد سے بڑھ کر قدم رکھیں اور وہ دعویٰ کریں جس کا آپکو علم نہیں دیا گیا تو بے شک اس دخلِ بیجا کی باز پُرس ہوگی۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 312
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 312
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/312/mode/1up
    اے حضرات مولوی صاحبان ! کیوں لوگوں کو بلا میں ڈالتے ہو اور کیوں اپنے علم سے بڑھ کر دعویٰ کرتے ہو۔ اگر ابن مریم کے نزول کی حدیث میں کوئی مخالفانہ قرینہ قائم نہ ہوتا اور صرف الہام ہی کے ذریعہ ایکؔ مسلمان اُس کے معنے آپ پر کھولتا کہ ابن مریم سے اِس جگہ درحقیقت ابن مریم مرادنہیں ہے تب بھی بمقابل اس کے آپ لوگوں کو یہ دعویٰ نہیں پہنچتا تھا کہ ابن مریم سے مراد درحقیقت ابن مریم ہے۔ کیونکہ مکاشفات میں استعارات غالب ہیں اور حقیقت سے پھیرنے کے لئے الہام الٰہی قرینہ قویہ کا کام دے سکتا ہے اور آپ حسن ظن کے لئے مامور ہیں۔
    لیکن اس جگہ تو صرف الہام ہی نہیں دوسرے قرائن قویہ بھی موجود ہیں کیا یہ کم قرینہ ہے کہ خدائے تعالیٰ نے مسیح کی وفات کے بارے میں تو کئی آیتیں بیان کیں مگر اُن کے زندہ رہنے اور زندہ اُٹھائے جانے پر اشارہ تک نہیں کیا۔ کیا یہ کم قرینہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے آنے والے ابن مریم کا وہ حُلیہ بیان نہیں کیا جو جانیوالے کا بیان فرمایا۔ کیا یہ کم قرینہ ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے آنے والے مسیح کو ایک اُمتی ٹھہرایا اور خانہ کعبہ کا طواف کرتے اس کو دیکھا ۔
    اور یہ عذر کہ اس بات پر اجماع ہو چکا ہے کہ نصوص کو ظاہر پر حمل کیا جائے یعنی قرآن اور حدیث کے ظاہری معنے لینے چاہئیں۔ سو واضح ہو کہ یہ عذر درحقیقت ایسا عذر ہے جس سے ہمارے مخالفوں پر ہماری حجت پوری ہوتی ہے کیونکہ یہ ناجاؔ ئز طریقہ انہیں لوگوں نے اختیار کیا ہے کہ نصوص بیّنہ کلام الٰہی کو بغیر قیام قرینہ کے باطن کی طرف پھیر رہے ہیں۔ قرآن کریم نے اپنے پچیس مقام میں توفّی کے لفظ کو قبض روح کے معنوں پر استعمال کیا ہے اور صاف جا بجا ظاہر کردیا ہے کہ توفّی کے یہ معنے ہیں کہ روح قبض کی جائے اور جسم کو چھوڑ دیاجائے۔لیکن یہ لوگ (خدا ان کو ہدایت دے ) تیئیس مقام میں تو یہی معنے مذکورہ بالا قبُول کرتے اور دو متنازعہ فیہ جگہوں میں جہاں مسیح کی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 313
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 313
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/313/mode/1up
    وفات کا ذکر ہے اپنی طرف سے اَور اَور معنے گھڑتے ہیں۔اب دیکھنا چاہیئے کہ ظواہرنصوص سے انہوں نے مُنہ پھیرایا ہم نے؟ ہاں ابن مریم کے نزول سے جو حدیثوں میں آیا ہے ہمارے نزدیک درحقیقت ابن مریم مراد نہیں ہے مگر اس سے لازم نہیں آتا کہ ہم نے نص کو ظاہر سے باطن کی طرف پھیرا ہے بلکہ قطع نظر الہام الٰہی سے یہ استعارہ اس لئے ماننا پڑ ا کہ نصوص بیّنہ قرآن کریم و احادیث صحیحہ اُس کو حقیقت پر حمل کرنے سے روکتی ہیں چنانچہ ہم بار بار ان دلائل صریحہ واضحہ کو بیان کر چکے ہیں کہاں تک اعادہ کلام کریں۔
    (۶) سوال۔ مسیح موعود کے ساتھ احادیث میں کہیں مثیل کا لفظ دیکھا نہیں جاتا۔ یعنی یہ کسی جگہ نہیں لکھا کہ مثیل مسیح ابن مریم آوے گا بلکہ یہ لکھا ہے کہ مسیح ابن مریم آوے گا۔
    اما ؔ الجواب۔ پس سوچنا چاہیئے کہ جب خدائے تعالیٰ نے آنے والے مثیل کا ابن مریم ہی نام رکھ دیا تو پھر وہ اس کو مثیل ابن مریم کر کے کیوں لکھتا۔ مثلاً تم سوچو کہ جو لوگ اپنی اولاد کے نام موسیٰ و داؤد وعیسیٰ وغیرہ رکھتے ہیں اگرچہ اُن کی غرض تو یہی ہوتی ہے کہ وہ نیکی اور خیر و برکت میں ان نبیوں کے مثیل ہو جائیں مگر پھر وہ اپنی اولاد کو اس طرح کر کے تو نہیں پکارتے کہ اے مثیل موسیٰ۔اے مثیل داؤد۔ اے مثیل عیسیٰ۔ بلکہ اصل نام ہی بطور تفاؤل پکارا جاتا ہے۔ پس کیا جو امر انسان محض تفاؤل کی راہ سے کر سکتا ہے وہ قادرمطلق نہیں کر سکتا ؟ کیا اس کو طاقت نہیں کہ ایک آدمی کی روحانی حالت کو ایک دوسرے آدمی کے مشابہ کرکے وہی نام اُس کا بھی رکھ دیوے؟ کیا اُس نے اسی روحانی حالت کی وجہ سے حضرت یحییٰ کا نام ایلیانہیں رکھ دیا تھا؟ کیا اسی روحانی مناسبت کی وجہ سے حضرت مسیح ابن مریم کا نام توریت پیدائش باب ۴۹ میں سیلا نہیں رکھا گیا اور سیلا یہودا بن یعقوب علیہ السلام کے پوتے کا نام تھا۔ یہود اکو اسی باب میں مسیح ابن مریم کے آنے کی ان لفظوں میں بشارت دی گئی کہ یہودا سے ریاست کا عصا جدا نہ ہو گا جبتک سیلا نہ آوے۔ یہ نہ کہا گیا کہ جب تک ابن مریم نہ آوے۔ چونکہ مسیح ابن مریم اُس خاندان سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 314
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 314
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/314/mode/1up
    پیداہونے کی وجہ سے یہوداکا پوتا ہی تھا اس وجہ سے اس کا نام سیلا ہی رکھ دیا گیا۔ اسی توریت پیدائش با بؔ ۴۸ آیت پندرہ ۱۵ میں حضرت یعقوب کی یہ دعا ذکر کی ہے کہ اُس نے یوسف کے لئے برکت چاہی اور یوسف کے لڑکوں کے لئے دعاکرکے کہا کہ وہ خداجس نے ساری عمر آج کے دن تک میری پاسبانی کی اِن جوانوں کو برکت دیوے اور جو میرا اور میرے باپ دادوں ابراہام اور اسحاق کا نام ہے سو اُن کا رکھا جاوے۔پس اللہ جلّشانہُ‘ کی اس عادت قدیمہ سے انکار نہیں ہو سکتاکہ وہ روحانی مناسبت کی وجہ سے جو ایک کا نام ہے وہ دوسرے کا رکھ دیتا ہے۔ ابراہیمی المشرب اس کے نزدیک ابراہیم ہے اور موسوی المشرب اس کے نزدیک موسیٰ ہے اور عیسوی المشرب اس کے نزدیک عیسیٰ ہے اور جو اِن تمام مشربوں سے حصہ رکھتا ہے وہ اِن تمام ناموں کا مصداق ہے۔ ہاں اگر کوئی امر بحث کے لائق ہے تو یہ ہے کہ ابن مریم کے لفظ کو اس کے ظاہری اور متبادر معنوں سے کیوں پھیراجائے ؟ تو اس کا جواب یہ ہے کہ بوجہ قیام قرینہ قویہ کے کیونکہ قرآن کریم اورحدیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بوضاحت ناطق ہے کہ مسیح ابن مریم رسول اللہ جاں بحق ہوا اور خدائے تعالیٰ کی طرف اُٹھایا گیا اور اپنے بھائیوں میں جا ملا۔ اور رسول مقبول نبی آخر الزمان نے اپنی معراج کی رات میں یحییٰ نبی شہید کے ساتھ دوسرے آسمان میں اُس کو دیکھا یعنی گذشتہ اور وفات یافتہ لوگوں کی جماعت میں اُس کو پایا۔ قرآن کریم و احادیث صحیحہ یہ امید اور بشارت بتواتر دے رہی ہیں کہ مثیل ابن مریم اور دوسرے مثیلؔ بھی آئیں گے مگر کسی جگہ یہ نہیں لکھا کہ کوئی گذشتہ اور وفات یافتہ نبی بھی پھر دنیامیں آجائے گا۔ لہٰذا یہ بات ببداہت ثابت ہے کہ ابن مریم سے وہ ابن مریم رسول اللہ مراد نہیں ہے جو فوت ہو چکا اور فوت شدہ جماعت میں جاملا اور خدائے تعالیٰ کی اس حکمت عجیبہ پر بھی نظر ڈالو کہ اُس نے آج سے قریبًا دس برس پہلے اس عاجز کا نام عیسیٰ رکھا اور بتوفیق و فضل خود براہین میں چھپواکر ایک عالم میں اس نام کو مشہور کر دیا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 315
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 315
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/315/mode/1up
    اب ایک مدّت دراز کے بعد اپنے خاص الہام سے ظاہرفرمایا کہ یہ وہی عیسیٰ ہے جس کے آنے کا وعدہ تھا۔ برابر دس ۱۰ برس تک لوگ اس نام کو کتاب براہین میں پڑھتے رہے اور خدائے تعالیٰ نے دس برس تک اس دوسرے الہام کو جو پہلے الہام کے لئے بطور تشریح تھا پوشیدہ رکھا تا اس کے پُرحکمت کام ایک غور کرنے والے کی نظر میں بناوٹ سے مصفّٰی ثابت ہوجائیں۔ کیونکہ بناوٹ کا سلسلہ اس قدر لمبا نہیں ہو سکتاجس کی بنیاد ایک طول طویل مدّت سے پہلے ہی رکھی گئی ہو۔ فتدبروا یا اولوالابصار۔
    (۷) سوال۔ یہ جو بیان کیا گیاہے کہ ممکن ہے کہ اور مثیل مسیح بھی آویں تو کیا اُن میں سے موعود ایک ہی ہے جو آپ ہیں یا سب موعود ہوں گے اور کن کن کو ہم سچا موعود تسلیم کریں؟
    امّاالجواب۔پس واضح ہو کہ وہ مسیح موعود جس کا آنا انجیل اوراحادیث صحیحہ کے رُ وؔ سے ضروری طورپر قرار پا چکا تھا وہ تو اپنے وقت پر اپنے نشانوں کے ساتھ آگیا اور آج وہ وعدہ پورا ہوگیا جو خدائے تعالیٰ کی مقدّس پیشگوئیوں میں پہلے سے کیا گیا تھا۔ لیکن اگرکسی کے دل میں یہ خلجان پیدا ہوکہ بعض احادیث کی اس آنے والے مسیح کی حالت سے بظاہر مطابقت معلوم نہیں ہوتی جیسے مسلم کی دمشقی حدیث۔ تو اول تو اس کا یہی جواب ہے کہ درحقیقت یہ سب استعارات ہیں اورمکاشفات میں استعارات غالب ہوتے ہیں۔بیان کچھ کیا جاتا ہے اور مرا د اُس سے کچھ لیاجاتاہے۔ سو یہ ایک بڑادھوکہ اور غلطی ہے جو اُن کو ظاہری طورپر مطابق کرنے کے لئے کوشش کی جائے اور یا اس تردّد اور فکر اورحیرت میں اپنے تئیں ڈال دیاجائے کہ کیوں یہ نشانیاں ظاہری طورپر مطابق نہیں آتیں۔ کیا یہ سچ نہیں کہ ان حدیثوں کی تشریح کے وقت فریق مخالف کوبھی اکثر مقامات میں تاویلوں کی حاجت پڑی ہے اوربڑے تکلّف کے ساتھ تاویلیں کی ہیں۔ جیسے مسیح ابن مریم کا یہ عمدہ کام جو بیان کیا گیا ہے جو وہ دنیا میں آکر خنزیروں کو قتل کرے گا۔ دیکھنا چاہیئے کہ اس کی تشریح میں علماء نے کس قدر الفاظ کو ظاہر سے باطن کی طرف پھیرنے کے لئے کوشش کی ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 316
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 316
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/316/mode/1up
    ایسا ہی دجّال کے طواف کعبہ میں کس قدردور از حقیقت تاویلوں سے کا م لیا ہے۔ سو اگر فریق ثانی اِن مقامات میں تاویلوں سے بکلّی دستکش رہتے تو البتہ و ہؔ ہمیں ماوّل خیال کرنے میں کسی قدر معذور ٹھہرتے لیکن اب وہ آپ ہی اس راہ پر قدم مار کر کس مُنہ سے ہم کو یہ الزام دیتے ہیں۔ سچ تو یہ ہے کہ چونکہ درحقیقت یہ کشفی عبارتیں استعارات سے پُر ہیں اس لئے کسی فریق کے لئے ممکن نہیں کہ ان کو ہریک جگہ ظاہر پر حمل کر سکے۔لمبے ہاتھوں کی حدیث لمبے ہاتھ کرکے بتلارہی ہے کہ اِن مکاشفات میں ظاہر پر زور مت دو ورنہ دھوکہ کھاؤ گے مگر کوئی اُس کی ہدایت کو قبول نہیں کرتا جو قبر کے عذاب کی نسبت حدیثوں میں بکثرت یہ بیان پایا جاتا ہے کہ ان میں گنہگار ہونے کی حالت میں بچّھو ہوں گے اور سانپ ہوں گے اور آگ ہوگی۔اگر ظاہر پر ہی ان حدیثوں کو حمل کرنا ہے تو ایسی چند قبریں کھودو اور اُن میں سانپ اور بچّھو دکھلاؤ۔
    پھر بعد اس کے ہم یہ بھی کہتے ہیں کہ اگر ظاہر پر ہی اِن بعض مختلف حدیثوں کو جو ہنوز ہماری حالتِ موجودہ سے مطابقت نہیں رکھتیں محمول کیا جائے تب بھی کوئی حرج کی بات نہیں۔ کیونکہ ممکن ہے کہ خدائے تعالیٰ ان پیشگوئیوں کو اس عاجز کے ایک ایسے کامل متبع کے ذریعہ سے کسی زمانہ میں پورا کردیوے جو منجانب اللہ مثیل مسیح کا مرتبہ رکھتا ہو۔اور ہریک آدمی سمجھ سکتا ہے کہ متبعین کے ذریعہ سے بعض خدمات کا پورا ہونا درحقیقت ایسا ہی ہے کہ گویا ہم نے اپنے ہاتھ سے وہ خدمات پوری کیں۔ بالخصوص جب بعض متبعین فنا فی الشیخ کی حالت اختیار کر کے ہمار ا ؔ ہی روپ لے لیں اور خدائے تعالیٰ کا فضل انہیں وہ مرتبہ ظلّی طورپر بخش دیوے جو ہمیں بخشا۔ تو اس صورت میں بلاشبہ اُن کا ساختہ پرداختہ ہمار ا ساختہ پرداختہ ہے۔ کیونکہ جو ہمارے راہ پر چلتاہے۔ وہ ہم سے جدا نہیں اور جو ہمارے مقاصد کو ہم میں ہو کر پورا کرتاہے وہ درحقیقت ہمارے ہی وجود میں داخل ہے۔ اس لئے وہ جزو اورشاخ ہونے کی وجہ سے مسیح موعود کی پیشگوئی میں بھی شریک ہے کیونکہ وہ کوئی جدا شخص نہیں۔پس اگر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 317
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 317
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/317/mode/1up
    ظلّی طور پر وہ بھی خدائے تعالیٰ کی طرف سے مثیلِ مسیح کا نام پاوے اور موعود میں بھی داخل ہو تو کچھ حرج نہیں کیونکہ گو مسیح موعود ایک ہی ہے مگر اس ایک میں ہو کر سب موعود ہی ہیں۔ کیونکہ وہ ایک ہی درخت کی شاخیں اور ایک ہی مقصد موعود کی روحانی یگانگت کی راہ سے متممّ و مکمل ہیں اور اُن کو اُن کے پھلوں سے شناخت کرو گے۔ یاد رکھنا چاہیئے کہ خدائے تعالیٰ کے وعدے جو اس کے رسولوں اور نبیوں اور محدثوں کی نسبت ہوتے ہیں کبھی تو بلا واسطہ پورے ہوتے ہیں اورکبھی بالواسطہ اُن کی تکمیل ہوتی ہے۔ حضرت مسیح ابن مریم کو بھی جو نصرت اور فتح کے وعدے دئے گئے تھے وہ اُن کی زندگی میں پورے نہیں ہوئے بلکہ ایک دوسرے نبی کے ذریعہ سے جو تمام نبیوں کا سردار ہے یعنی سیدنا وامامنا حضرت محمد مصطفےٰ خاتم الرسل کے ظہور سے پورے ہوئے اور اسی طرح حضرت موسیٰ کلیم اللہ کو جو کنعان کی فتح کی بشارتیں دی گئی تھیں بلکہ صا ؔ ف صاف حضرت موصوف کو وعدہ دیا گیا تھا کہ تُو اپنی قوم کو کنعان میں لے جائے گا اور کنعان کی سرسبز زمین کا انہیں مالک کردے گا۔ یہ وعدہ حضرت موسیٰ کی زندگی میں پورا نہ ہو سکا اوروہ راہ میں ہی فوت ہوگئے لیکن یہ نہیں کہہ سکتے کہ وہ پیشگوئی غلط نکلی جو اب تک توریت میں موجود ہے۔ کیونکہ موسےٰ کی وفات کے بعد موسوی قوت اورموسوی روح اس کے شاگرد یوشع کو عطا ہوئی۔اوروہ خدائے تعالیٰ کے حکم اور اس کے نفخِ روح سے موسیٰ میں ہو کر اور موسوی صورت پکڑ کر وہ کام بجا لایا جو موسیٰ کا کام تھا۔ سوخدائے تعالیٰ کے نزدیک وہ موسیٰ ہی تھا کیونکہ اُس نے موسیٰ میں ہوکر اور موسیٰ کی پیروی میں پوری فنا اختیارکرکے اور خدائے تعالیٰ سے موسوی روح پا کر اس کام کو کیا تھا۔ ایسا ہی ہمارے سیّد ومولیٰ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت توریت میں بعض پیشگوئیاں ہیں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے ہاتھ پر بلاواسطہ پوری نہیں ہوسکیں بلکہ وہ بواسطہ اُن خلفائے کرام کے پوری کی گئیں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت اورپیروی میں فانی تھے۔سو اس میں کون کلام
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 318
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 318
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/318/mode/1up
    کرسکتا ہے جو ایک مامور من اللہ کی نسبت جن جن فتوحات اور امور عظیمہ کا تذکرہ پیشگوئی کے لباس میں ہوتاہے اس میں یہ ہرگز ضروری نہیں سمجھا جاتا کہ وہ سب کچھ اُسی کے ذریعہ سے پورا بھی ہو جائے بلکہ اُس کے خالص متبعین اس کے ہاتھوؔ ں اورپَیروں کی طرح سمجھے جاتے ہیں اوران کی تمام کارروائیاں اُسی کی طر ف منسوب ہوتی ہیں۔ جیسے ایک سپہ سالار کسی معرکۂ جنگ میں عمدہ عمدہ سپاہیوں اور مدبّروں کی مدد سے کسی دشمن کو گرفتارکرتاہے یا قتل کردیتاہے تو وہ تمام کارروائی اُسی کی طرف منسوب کی جاتی ہے اور بلا تکلّف کہا جاتا ہے کہ اُس نے گرفتارکیا یا قتل کیا۔پس جبکہ یہ محاورہ شائع متعارف ہے تو اس بات میں کونسا تکلّف ہے کہ اگر فرض کے طورپر بھی تسلیم کرلیں کہ بعض پیشگوئیوں کا اپنی ظاہری صورت پر بھی پوراہونا ضروری ہے تو ساتھ اس کے یہ بھی تسلیم کرلینا چاہیئے کہ وہ پیشگوئیاں ضرورپوری ہوں گی اور ایسے لوگوں کے ہاتھ سے اُن کی تکمیل کرائی جائے گی کہ جو پورے طورپر پیروی کی راہوں میں فانی ہونے کی وجہ سے اور نیز آسمانی روح کے لینے کے باعث سے اس عاجز کے وجود کے ہی حکم میں ہوں گے اورایک پیشگوئی بھی جو براہین میں درج ہوچکی ہے اسی کی طرف اشار ہ کررہی ہے اوروہ الہام یہ ہے یا عیسٰی انّی متوفیک ورافعک الیّ وجاعل الذین اتبعوک فوق الذین کفروا الٰی یوم القیامۃ۔ اس مسیح کو بھی یاد رکھو جو اس عاجز کی ذریت میں سے ہے جس کا نام ابن مریم بھی رکھا گیاہے کیونکہ اس عاجز کو براہین میں مریم کے نام سے بھی پکاراہے۔
    (۸)سوال۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں عیسائیوں کا یہی عقیدہ تھاؔ کہ درحقیقت مسیح ابن مریم ہی دوبارہ دنیا میں آئیں گے پس اگر یہ عقیدہ صحیح نہیں تھا تو کیوں خدائے تعالیٰ نے قرآن کریم میں ا س کی تکذیب نہ کی بلکہ حدیثوں میں ابن مریم کے آنے کاوعدہ دیا گیا۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 319
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 319
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/319/mode/1up
    امّاالجوب۔پس واضح ہو کہ خدائے تعالیٰ نے تو قرآن کریم میں اس عقیدہ کی تکذیب کر دی جبکہ بیان کر دیا کہ درحقیقت مسیح ابن مریم فوت ہوگیا ہے اورپھر مسیح کے دوبارہ زندہ ہونے کاکہیں ذکرنہیں کیا اَور حدیثوں میں بھی اس مدعا کے بارہ میں کہیں قرآن شریف کی مخالفت نہیں کی گئی۔ ایک حدیث بھی ایسی نہیں ملے گی جو مسیح ابن مریم کا زندہ بجسدہ العنصری آسمان کی طرف اُٹھائے جانا بیان کرتی ہو۔ غرض آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی اس عقیدہ کی تکذیب کرنے میں کچھ فرق نہیں رکھا۔ آنے والے مسیح کو اُمّتی ٹھہرایا۔ حُلیہ اوّل و آخر میں اختلاف ڈال دیا اور مسیح کا فوت ہوجانابیان کردیا۔ سواس قدر بیان کافی تھا۔ اورچونکہ پیشگوئیوں میں خلق اللہ کے ابتلا کے لئے یہ بھی منظور ہوتا ہے کہ کچھ کیفیت اُن کی پوشیدہ رکھی جائے اس لئے کسی قدر پوشیدہ بھی رکھاگیا تا وقت پر صادقوں اورکاذبوں کا امتحان ہوجائے۔ اوریہ بیان بھی صحیح نہیں ہے کہ عیسائیوں کا متفق علیہ یہی عقیدہ ہے کہ حضرت مسیح دنیا میں پھرآئیں گے کیونکہ بعض فرقے اُن کے حضرت مسیح کے فوت ہوجانے کے قائل ہیں۔ اورحواریوں کی دونوؔ ں ا نجیلوں نے یعنی متی اوریوحنا نے اس بیان کی ہرگز تصدیق نہیں کی کہ مسیح درحقیقت آسمان پر اٹھایا گیا۔ ہاں مرقس اور لوقا کی انجیل میں لکھاہے مگر و ہ حواری نہیں ہیں اورنہ کسی حواری کی روایت سے انہوں نے لکھا۔
    (۹) سوال۔ لیلۃ القدر کے اَور معنی کر کے نیچریت اورباطنیت کا دروازہ کھول دیا ہے۔
    امّاالجواب۔معترض صاحب نے اس اعتراض سے لوگوں کو دھوکا دیا ہے اس جگہ اصل حقیقت یہ ہے کہ خدائے تعالیٰ نے اس عاجز پر ظاہر کیا ہے کہ پہلے معنے لیلۃ القدر کے جو علماء کرتے ہیں وہ بھی مسلّم اور بجا ہیں اور ساتھ اُن کے یہ بھی معنے ہیں۔ اور اِن دونوں میں کچھ منافات نہیں۔ قرآن شریف ظہر بھی رکھتا اور بطن بھی اور صدہا معارف اس کے اندر پوشیدہ ہیں۔ پس اگر اس عاجز نے تفہیم الٰہی سے لیلۃالقدر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 320
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 320
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/320/mode/1up
    کے یہ معنے کئے تو کہاں سے سمجھا گیا کہ پہلے معنوں سے انکار کیا ہے کیا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ خیرالقرون نہیں کہلاتا؟ کیا اس زمانہ کی عبادات ثواب میں بڑھ کر نہیں تھیں ؟ کیا اُس زمانہ میں نصرتِ دین کے لئے فرشتے نازل نہیں ہوتے تھے ؟ کیا روح الامین نازل نہیں ہوتا تھا ؟ پس ظاہر ہے کہ لیلۃ القدر کے تمام آثار و انوار و برکات اُس زمانہ میں موجود تھے ایک ظلمت بھی موجود تھی جس کے دُور کرنے کے لئے یہ انوار و ملائک اور روح الامین اور ؔ طرح طرح کی روشنی نازل ہورہی تھی۔ پھر اگر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے اس مقدّس زمانہ کا نام بھی الہام الٰہی سے لیلۃ القدر ظاہر کیا گیا تو اس سے کونسی قباحت لازم آگئی؟ جو شخص قرآن شریف کے ایک معنی کو مسلّم رکھ کر ایک دوسرا لطیف نکتہ اس کا بیان کرتاہے تو کیا اس کا نام مُلحد رکھنا چاہیئے؟ اس خیال کے آدمی بلا شبہ قرآن شریف کے دشمن اور ا س کے اعجاز کے منکر ہیں۔
    (۱۰) سوال۔ ملائک اور جبرئیل علیہ السلام کے وجود سے انکار کیا ہے اور انکو توضیح مرام میں صرف کواکب کی قوتیں ٹھہرایاہے۔
    اماالجواب۔یہ آپ کا دھوکا ہے۔ اصل بات یہ ہے کہ یہ عاجز ملائک اور حضرت جبرائیل ؑ کے وجود کو اُسی طرح مانتا ہے جس طرح قرآن اور حدیث میں وارد ہے اور جیسا کہ قرآن کریم اوراحادیث صحیحہ کی رُو سے ملائک کے اجرامِ سماوی سے خادمانہ تعلقات پائے جاتے ہیں یا جو جو کام خاص طورپر انہیں سپرد ہورہا ہے اسی کی تشریح رسالہ توضیح مرام میں ہے۔
    چو بشنوی سخن اہل دل مگو کہ خطااست
    سخن شناس نۂ دلبرا خطا اینجااست
    (۱۱) سوال۔ رسالہ فتح اسلام میں نبوّت کا دعویٰ کیا ہے۔
    امّاالجواب۔ نبوت کا دعویٰ نہیں بلکہ محدثیت کا دعویٰ ہے جو خد اؔ ئے تعالیٰ کے حکم سے کیا گیا ہے۔ اور اس میں کیا شک ہے کہ محدثیت بھی ایک شعبہ قویہ نبوت کا اپنے اندر رکھتی ہے۔ جس حالت میں رویائے صالحہ نبوت کے چھیالیس حصوں میں سے ایک حصّہ ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 321
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 321
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/321/mode/1up
    تو محدثیت جوقرآن شریف میں نبوت کے ساتھ اور رسالت کے ہم پہلو بیان کی گئی ہے جس کے لئے صحیح بخاری میں حدیث بھی موجود ہے اس کو اگر ایک مجازی نبوت قرار دیا جائے یا ایک شعبہ قویہ نبوت کا ٹھہرایا جائے تو کیا اس سے نبوت کا دعویٰ لازم آگیا؟ قرآن شریف کی وہ قرأت یاد کرو کہ جو ابن عباس نے لی ہے اور وہ یہ ہے وما ارسلنا من قبلک من رسول ولا نبی ولا محدّث الا اذا تمنّٰی القی الشیطٰن فی امنیتہ فینسخ اللہ ما یلقی الشیطٰن ثم یحکم اللہ اٰ یٰتہٖ۔ وحی الٰہی پر صرف نبوت کاملہ کی حد تک کہاں مُہر لگ گئی ہے اور اگر ایسا ہی ہے تو پھر اس آیت کے کیا معنے ہیں ؟ 333 ۱؂ ۔ اے غافلو! اس اُمت مرحومہ میں وحی کی نالیاں قیامت تک جاری ہیں مگر حسب مراتب۔
    (۱۲) سوال۔ سورۃ زخرف میں یہ آیت موجود ہے333 ۲؂ (الجزو نمبر۲۵)یعنی وہ قیامت کے وجود پر نشان ہے سو تم باوجودموجود ہونے نشان کے قیامت کے بارے میں شک مت کرو۔نشان سے مراد حضرت عیسیٰ ہیں جو قیامت کےؔ قریب نازل ہوں گے اور اس آیت سے اُن کانازل ہونا ثابت ہوتاہے۔
    اماالجواب۔ظاہر ہے کہ خدائے تعالیٰ اس آیت کو پیش کر کے قیامت کے منکرین کو ملزم کرنا چاہتا ہے کہ تم اس نشان کو دیکھ کرپھر مُردوں کے جی اُٹھنے سے کیوں شک میں پڑے ہو۔ سو اس آیت پر غور کرکے ہریک عقلمند سمجھ سکتاہے کہ اس کو حضرت عیسیٰ کے نزول سے کچھ بھی تعلق نہیں آیت تو یہ بتلا رہی ہے کہ وہ نشان مُردوں کے جی اٹھنے کا اب بھی موجود ہے اور منکرین کو ملزم کررہی ہے کہ اب بھی تم کیوں شک کرتے ہو۔ اب ہریک عقلمند سمجھ سکتا ہے کہ اگر خدائے تعالیٰ کا اس آیت میں یہ مطلب ہے کہ جب حضرت مسیح آسمان سے نازل ہوں گے تب اُن کاآسمان سے نازل ہونا مُردوں کے جی اُٹھنے کے لئے بطور دلیل یا علامت کے ہو گا تو پھر اس دلیل کے ظہور سے پہلے خدائے تعالیٰ لوگوں کو کیوں کر ملزم کرسکتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 322
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 322
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/322/mode/1up
    کیااس طرح اتمام حجت ہو سکتا ہے؟ کہ دلیل تو ابھی ظاہر نہیں ہوئی اورکوئی نام و نشان اس کا پیدا نہیں ہوا اور پہلے سے ہی منکرین کو کہا جاتا ہے کہ اَب بھی تم کیوں یقین نہیں کرتے کیا اُن کی طرف سے یہ عذر صحیح طورپر نہیں ہو سکتا کہ یا الٰہی ابھی دلیل یا ؔ نشان قیامت کا کہاں ظہورمیں آیا جس کی وجہ سے فَلَا تَمْتَرُنَّ بِھَا کی دھمکی ہمیں دی جاتی ہے۔ کیا یہ اتمام حجت کاطریق ہے ؟ کہ دلیل تو ابھی پردۂ غیب میں ہو اور یہ سمجھاجائے کہ الزام پورا ہو گیا ہے۔ ایسے معنے قرآن شریف کی طرف منسو ب کرنا گویا اس کی بلاغت اورپُرحکمت بیان پر دھبّہ لگانا ہے۔سچ ہے کہ بعض نے یہی معنے لئے ہیں مگر انہوں نے سخت غلطی کھائی بلکہ حق بات یہ ہے کہ اِنّہ‘ کا ضمیر قرآن شریف کی طرف پھرتا ہے اور آیت کے یہ معنے ہیں کہ قرآن شریف مُردوں کے جی اُٹھنے کے لئے نشان ہے کیونکہ اس سے مُردہ دل زندہ ہورہے ہیں۔ قبروں میں گلے سڑے ہوئے باہر نکلتے آتے ہیں اور خشک ہڈیوں میں جان پڑتی جاتی ہے چنانچہ قرآن شریف میں خود اپنے تئیں قیامت کا نمونہ ظاہر کرتاہے جیسا کہ اللہ جلّشانُہٗ فرماتا ہے(سورۃ فرقان الجزونمبر ۱۹) یعنی ہم نے آسمان سے پاک پانی اُتاریعنی قرآن تا ہم اس کے ساتھ مردہ زمین کو زندہ کریں پھرفرماتا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 323
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 323
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/323/mode/1up
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 324
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 324
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/324/mode/1up
    اعلان
    واضح ہو کہ اس رسالہ ازالہ اوہام میں ان تمام سوالات کا جواب ہے کہ جو اکثر لوگ کوتہ اندیشی کے رو سے حضرت مسیح کی حیات ممات کے متعلق کیا کرتے ہیں اور کچھ شک نہیں کہ جو شخص اس کتاب کو اول سے آخر تک خو ب غور سے پڑھے گا اس کا کوئی شبہ باقی نہیں رہے گا سو اس پر یہ فرض ہے کہ اگر خدا تعالیٰ اس کتاب کے ذریعہ سے اس کو ہدایت بخشے اور اس کے سینہ کو کھول دیوے تو وہ اپنی معلومات سے اوروں کو بھی فیض پہنچاوے۔ ہر یک جو اس کتاب کی ہدایت کواپنے پورے اخلاص سے قبول کرے اُس پر یہ بھی لازم ہو گا کہ اس کی عام اشاعت کے لئے کوشش فرماوے اور اس کتاب کے شائع ہونے کے بعد منکروں کے لئے انسب واولیٰ طریق یہی ہے کہ زبانی مباحثات کا دروازہ بند رکھ کر اس کتاب کے مطالب کو غور سے پڑھیں پھر اگر ہدایت نصیب نہ ہو تو اس کی دلائل کو رد کرکے دکھلاویں اور ہماری آخری نصیحت اُن کے حق میں یہی ہے کہ اللہ جلَّ شَانُہٗ سے ڈریں۔ ولمقت اللّٰہ اکبر من مقتھم۔ والسلام علیٰ من اتبع الھدیٰ۔
    المعلن
    میرزا غلام احمد قادیانی ازلودہانہ محلہ اقبال گنج
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 325
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 325
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/325/mode/1up
    یعنی ؔ قرآن کے ساتھ ہم نے زمین مردہ کو زندہ کیا۔ایسا ہی حشر اجساد بھی ہوگا۔پھر فرماتا ہے 33 ۱؂ یعنی ہم قرآن کے ساتھ مردوں کو زندہ کر رہے ہیں اور پھر فرماتا ہے 33 ۲؂ یعنی اے لو گو جان لو کہ زمین مر گئی تھی اور خدااب نئے سرے اس کو زندہ کر رہا ہے۔غرض جا بجا قرآن شریف کو نمونہ قیا مت ٹھہرایا گیا ہے بلکہ ایک حدیث میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ قیامت میں ہی ہوں جیسا کہ فرمایا ہے وانا الحاشر الذی یحشر الناس علٰی قد می یعنی میں ہی قیامت ہوں میرے قدموں پر لوگ اُٹھائے جاتے ہیں یعنی میرے آنے سے لوگ زندہ ہورہے ہیں۔میَں قبروں سے انہیں اُٹھا رہا ہوں اور میرے قدموں پر زندہ ہونے والے جمع ہوتے جاتے ہیں۔اور درحقیقت جب ہم ایک منصفانہ نگاہ سے عرب کی آبادیوں پر نظر ڈالیں کہ اپنی روحانی حالت کی رُوسے وہ کیسے قبرستان کے حکم میں ہو گئے تھے اور کس درجہ تک سچائی اور خداترسی کی رُوح اُن کے اندر سے نکل گئی تھی اور کیسے وہ طرح طرح کی خرابیوں کی وجہ سے جو اُن کے اخلاق اور اعمال اور عقائدؔ پر اثر کر گئی تھیں سڑگل گئے تھے تو بلا اختیار ہمارے اندر سے یہ شہادت نکلتی ہے کہ اُن کا زندہ کرنا جسمانی طور پر مُردوں کے جی اُٹھنے سے بمراتب عجیب تر ہے جس کی عظمت نے بے شمار عقلمندوں کی نگاہوں کو حیرت میں ڈال دیا ہے۔
    اب خلاصہ کلام یہ کہ آیت موصوفہ بالا کے حقیقی معنے یہ ہیں جو ہم نے ذکر کئے ہیں یعنی خدائے تعالےٰ جسمانی طور پرمُردو ں کے جی اُٹھنے پر روحانی طور پر مردوں کا جی اُٹھنا بطور بدیہی نشان کے پیش کرتا ہے جو درحقیقت دلوں پر نہا یت مؤثر ہوا اور بے شمار کفّار اس نشان کے قائل ہو گئے اور ہو تے جاتے ہیں۔اور ایک جماعت محققین کی بھی یہی معنے آیت موصو فہ بالا کے لیتی ہے۔چنانچہ تفسیر معالم میں زیر تفسیر اس آیت کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 326
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 326
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/326/mode/1up
    یہ معنے لکھے ہیں جیسا کہ تفسیر کی عبارت یہ ہے وقال الحسن وجماعۃ وانّہ یعنی وان القراٰن لعلم للسّاعۃ یعلمکم قیامھا ویخبر کم باحوالھا و اھوالھا فلا تمترن بھا یعنی فلا تشکن فیھا بعد القران یعنی حسن اور ایک جماعت نے اس آیت کے یہی معنے کئے ہیں کہ قرآن قیامت کے لئے نشان ہے اور زبان قال اور حا لؔ سے خبر دے رہا ہے کہ قیامت اور اُس کے حالات اور اس کے ہولناک نشان واقع ہو نیوالے ہیں سو بعد اس کے کہ قرآن قیامت کے آنے پر اپنے اعجازی بیانات اور تاثیرات احیاء موتیٰ سے دلیل محکم قائم کر رہا ہے تم شک مت کرو۔
    (۱۳)سوال۔الہام جس کی بناء پر حلقہ اجماع اُمت سے خروج اختیار کیا گیا ہے خود بے اصل اور بے حقیقت اور بے سود چیز ہے جس کا ضرر اس کے نفع سے بڑھ کر ہے۔
    امّا الجواب۔پس واضح ہو کہ ہم پہلے لکھ چکے ہیں کہ اجماع کو پیشگوئیوں سے کچھ علاقہ نہیں۔اجماع اُن امور پر ہوتا ہے جن کی حقیقت بخوبی سمجھی گئی اور دیکھی گئی اور دریافت کی گئی اور شارع علیہ السلام نے اُن کے تمام جزئیات سمجھادئے دکھادئے سکھلا دئے جیسے صوم و صلوٰۃ و زکوٰۃ و حج و عقائد تو حید و ثواب و عقاب۔مگر یہ دنیوی پیشگو ئیاں تو ابھی مخفی امور ہیں جن کی شارح علیہ السلام نے اگر کچھ شرح بھی بیان کی تو ایسی کہ جو استعارہ کی طرف توجہ دلاتی ہے۔مثلاًکیا ان احادیث پر اجماع ثابت ہو سکتا ہے کہ مسیح آکر جنگلو ںؔ میں خنزیروں کا شکار کھیلتا پھرے گا اور دجاّل خانہ کعبہ کا طواف کرے گا اور ابن مریم بیماروں کی طرح دو آدمیوں کے کاندھے پر ہاتھ دھر کے فرض طوافِ کعبہ بجالائے گا۔کیا معلوم نہیں کہ جو لوگ ان حدیثوں کی شرح کرنے والے گذرے ہیں وہ کیسے بے ٹھکانہ اپنی اپنی کمین۱؂ہانک رہے ہیں۔اگر کوئی بات اجماع کے طورپر تصفیہ یا فتہ ہوتی تو کیوں وہ لوگ مختلف خیالات کو ظاہر کرتے کیا کفر کا خوف نہیں تھا؟
    اب رہی یہ بات کہ الہام بے اصل اور بے سود اور بے حقیقت چیز ہے جس کا ضرر اس کے نفع سے بڑھ کر ہے۔سو جاننا چاہیئے کہ ایسی باتیں وہی شخص کرے گا جس نے کبھی
    ۱؂ ایڈیشن اول کے متن میں صحیح لفظ پڑھا نہیں جا رہا۔ غالباً ’’تکیں‘‘ ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 327
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 327
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/327/mode/1up
    اس شراب طہور کا مزہ نہیں چکھا اور نہ یہ خواہش رکھتا ہے کہ سچا ایمان اس کو حاصل ہو۔ بلکہ رسم اور عادت پر خوش ہے اور کبھی نظر اس طرف اُٹھا کر نہیں دیکھتا کہ مجھے خداوند کریم پر یقین کہاں تک حاصل ہے اور میری معرفت کا درجہ کس حد تک ہے اور مجھے کیا کرنا چاہئے کہ تا میری اندرونی کمزوریاں دور ہوں اور میرے اخلاق اور اعمال اور ارادوں میں ایک زندہ تبدیلی پیدا ہوجائےؔ ۔ اور مجھے وہ عشق اور محبت حاصل ہوجائے جسکی وجہ سے میں باآسانی سفرِ آخرت کر سکوں اور مجھ میں ایک نہایت عمدہ قابل ترقی مادہ پیدا ہوجائے۔
    بے شک یہ بات سب کے فہم میں آسکتی ہے کہ انسان اپنی اس غافلانہ زندگی میں جو ہر دم تحت الثریٰ کی طرف کھینچ رہی ہے اور علاوہ اس کے تعلقات زن وفرزند اور ننگ وناموس کے بوجھل اور بھاری پتھر کی طرح ہر لحظہ نیچے کی طرف لے جارہے ہیں ایک بالائی طاقت کا ضرور محتاج ہے جو اس کو سچی بینائی اور سچا کشف بخش کر خدائے تعالیٰ کے جمال باکمال کا مشتاق بنا دیوے۔ سوجاننا چاہیئے کہ وہ بالائی طاقت الہام ربّانی ہے جو عین دُکھ کے وقت میں سرور پہنچاتا ہے اور مصائب کے ٹیلوں اور پہاڑوں کے نیچے بڑے آرام اور لذّت کے ساتھ کھڑا کردیتاہے۔ وہ دقیق دردقیق وجود جس نے عقلی طاقتوں کو خیرہ کر رکھاہے اور تمام حکیموں کی عقل اوردانش کو سکتہ میں ڈال دیاہے وہ الہام ہی کے ذریعہ سے کچھ اپنا پتہ دیتاہے اور انا الموجود کہہ کرسالکوں کے دلوں کو تسلّی بخشتا ہے اور سکینت نازل کرتاہے اور ا نتہاؔ ئی وصول کی ٹھنڈی ہوا سے جان پُژمردہ کو تازگی بخشتاہے۔ یہ بات تو سچ ہے کہ قرآن کریم ہدایت دینے کے لئے کافی ہے مگرقرآن کریم جس کو ہدایت کے چشمہ تک پہنچاتا ہے اُس میں پہلی علامت یہی پیداہوجاتی ہے کہ مکالمہ طیّبہ الٰہیہ اس سے شروع ہوجاتا ہے جس سے نہایت درجہ کی انکشافی معرفت اور چشم دید برکت ونورانیت پیداہوجاتی ہے اور وہ عرفان حاصل ہونا شروع ہو جاتاہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 328
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 328
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/328/mode/1up
    جو مجرّد تقلیدی اٹکلوں یا عقلی ڈھکوسلوں سے ہرگز مل نہیں سکتا۔ کیونکہ تقلیدی علوم محدود و مشتبہ ہیں اور عقلی خیالات ناقص وناتمام ہیں اورہمیں ضرور حاجت ہے کہ براہ راست اپنے عرفان کی توسیع کریں۔ کیونکہ جس قدرہمارا عرفان ہو گا اُسی قدرہم میں ولولہ و شوق جوش مارے گا۔ کیا ہمیں باوجود ناقص عرفان کے کامل ولولہ و شوق کی کچھ توقع ہے ؟ نہیں کچھ بھی نہیں۔ سوحیرت اورتعجب ہے کہ وہ لوگ کیسے بدفہم ہیں جو ایسے ذریعہ کاملہ وصولِ حق سے اپنے تئیں مستغنی سمجھتے ہیں جس سے روحانی زندگی وابستہ ہے۔
    یاد رکھنا چاہیئے کہ روحانی علوم اورروحانی معارف صرف بذریعہ الہامات و مکاشفات ہی ملتے ہیں اورجب تک ہم وہ درجہ روشنی کا ؔ نہ پالیں تب تک ہماری انسانیت کسی حقیقی معرفت یا حقیقی کمال سے بہرہ یاب نہیں ہوسکتی۔ صرف کوّے کی طرح یا بھیڈی کی مانند ایک نجاست کوہم حلوہ سمجھتے رہیں گے اورہم میں ایمانی فراست بھی نہیں آئے گی۔ صرف لومڑی کی طرح داؤ پیچ بہت یاد ہوں گے۔
    ہم ایک بڑے بھاری مطلب کے لئے جو یقینی معرفت ہے پیدا کئے گئے ہیں اور وہی معرفت ہماری نجات کا مدار بھی ہے جو ہریک خبیث اور مغشوش طریق سے ہمیں آزادی بخش کر ایک پاک اورشفاف دریا کے کنارے پرہمارا منہ رکھ دیتی ہے اور وہ صرف بذریعہ الہام الٰہی ہمیں ملتی ہے۔ جب ہم اپنے نفس سے بکلّی فنا ہوکر درد مند دل کے ساتھ لایُدرک وجودمیں ایک گہرا غوطہ مارتے ہیں تو ہماری بشریت الوہیت کے دریامیں پڑنے سے عند العود کچھ آثار و انوار اس عالم کے ساتھ لے آتی ہے۔سو جس چیز کو اس دنیا کے لوگ بنظرِ حقارت دیکھتے ہیں۔ درحقیقت وہی ایک چیز ہے جومدت کے جدا شدہ کو ایک دم میں اپنے محبوب سے ملاتی ہے وہی ہے جس سے عشاق الٰہی تسلّی پاتے ہیں اور طرح طرح کی نفسانی قیدوں سے بیک بار اپنا پَیر باہر نکا لؔ لیتے ہیں جب تک وہ سچی روشنی دلوں پر نازل نہ ہو ہرگز ممکن ہی نہیں کہ کوئی دل منوّر ہوسکے۔ غرض انسانی عقل کی ناقابلیت اور رسمی علوم کی محدودیّت ضرورتِ الہام پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 329
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 329
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/329/mode/1up
    شہادت دے رہی ہے جس قدر دنیا میں عقلمند ہیں یا ایسے زاہد جن کے دل درحقیقت اس پا ک سلسلے سے بے نصیب ہیں اُن کے چال چلن اور ان کا اخلاقی انقباض اور اُن کے سفلی خیالات اور ان کی سب شرمناک کارستانیاں اس میرے بیان پر شاہدہیں کہ وہ بغیر اس چشمہ طیبہ کے کس قدر قابل کراہت کثافتوں میں مبتلا ہیں اور جس طرح گندے کنوئیں کے پانی کے ایک قطرہ سے اس کی تمام کثافت ثابت ہوجاتی ہے۔ اسی طرح اُن کے گندے خیالات اپنے بُرے نمونہ سے پہچانے جاتے ہیں۔
    اگر چہ ایسے لوگوں کی فلاسفی عام خیالات میں ہل چل مچانے والی ہو مگر چونکہ سچی روشنی اس کے ساتھ نہیں اس لئے وہ جلداوربہت جلد اپنی ظلمت دکھا دیتی ہے اورباوجود تمام لاف وگزاف ہمہ دانی کے ایسے لوگوں کی اندرونی حالت ہاتھ پھیلا پھیلا کراپنی مفلسی ظاہرکرتی رہتی ہے اور بسا اوقات روحانی تشفّی کے نہ ملنے کی و جہؔ سے ایسے فلاسفروں اور حکیموں اورمولویوں اور فاضلوں سے ایسی حرکتیں صادر ہوجاتی ہیں جن سے صاف شہادت ملتی ہے کہ وہ تسلّی بخش چشمہ سے کیسے اور کس قدر دُور و مہجور ہیں اور کیونکر حقیقی خوشحالی کے نہ پانے کے سبب سے ایک عذاب الیم یا یوں کہو کہ ایک درد اور جلن اوربے چینی میں دن رات مبتلاہیں۔
    اس جگہ بعض دلوں میں بالطبع یہ اعتراض پیداہوگا کہ اکثرلوگ الہام کا دعویٰ کرتے ہیں بلکہ فقرات الہامیہ سُناتے بھی رہتے ہیں لیکن اُن کی معرفت میں کچھ بھی ترقی نظر نہیں آتی اورمعمولی بشریت سے اُن کی عرفانی حالت کا درجہ بڑھا ہوا معلوم نہیں دیتا بلکہ وہی موٹی سمجھ اورسطحی خیالات اور فطرتی تاریکی اور پستی اُن میں دکھائی دیتی ہے اور اُن کے اخلاقی یا ذہنی یاروحانی قوےٰ میں کوئی امر عام عادت سے بڑھ کر نظر نہیں آتا۔ پھر کیونکر ایسے لوگوں کو ہم مُلہم سمجھیں اور ا س چشمۂ فیض کا ہم کلام مان لیویں۔جس کے قرب اور شرف مکالمت سے خارق عادت تبدیلی پیدا ہوجانا ضروری ہے۔ کم سے کم اس قدرتبدیلی کہ بعض باتیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 330
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 330
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/330/mode/1up
    اُس مُلہم میں ایسی ہوں کہ دوسروں میں پائی نہ جائیں۔
    سوؔ جاننا چاہیئے کہ درحقیقت ایسے لوگ واقعی طورپر ملہم نہیں ہوتے بلکہ ایک قسم کے ابتلاء میں مبتلاہوتے ہیں جس کو وہ اپنی نادانی سے الہام سمجھ لیتے ہیں۔ خدائے تعالیٰ کاحقیقی اور واقعی طور پرمکالمہ کچھ تھوڑی سی بات نہیں۔ جس طرح تم دیکھتے ہو کہ جب ایک تاریکی میں بیٹھے ہوئے آدمی کے لئے ناگہانی طورپر آفتاب کی طرف کھڑکی کھل جائے تو کیسی یکدفعہ اس کی حالت بدل جاتی ہے اور کیوں کر آسمانی روشنی اس کے حواس پر کام کر کے ایک تبدیل شدہ زندگی اس کے لئے پیدا کردیتی ہے اور کیوں کر تاریکی سے جو بالطبع افسردگی کی موجب ہے باہر نکل کر ایک سرُور و ذوق اس کے دل میں اور ایک روشنائی اس کی آنکھوں میں اور ایک استقامت اس کی حالت میں پیدا ہوجاتی ہے۔ سو یہی حالت اُس کھڑکی کی ہے جو آسمان کی طرف سے کھلتی ہے اوربہت ہی کم لوگ ہیں جو واقعی اور حقیقی طورپر اُس کو پاتے ہیں اور تم انہیں خارق عادت علامتوں سے شناخت کروگے۔
    (۱۴)سوال۔ قرآن شریف سے اگرچہ مسیح کی موت ثابت ہوتی ہے مگر اس موت کا کوئی وقت خاص تو ثابت نہیں ہوتا۔ پس تعارض حدیث اور قرآؔ ن کا دور کرنے کے لئے بجُز اس کے اَورکیا راہ ہے کہ اس موت کا زمانہ وہ قرار دیاجائے کہ جب پھر حضرت مسیح نازل ہوں گے۔
    امّاالجواب۔پس واضح ہو کہ قرآن شریف کی نصوص بیّنہ اسی بات پر بصراحت دلالت کررہی ہیں کہ مسیح اپنے اُسی زمانہ میں فوت ہو گیا ہے جس زمانہ میں وہ بنی اسرائیل کے مفسد فرقوں کی اصلاح کے لئے آیا تھا جیسا کہ اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتاہے 3 33۔ ۱؂ اب اس جگہ ظاہر ہے کہ خدائے تعالیٰ نے اِنّیْ مُتَوَفِّیْکَ پہلے لکھا ہے اور رَافِعُکَ بعد ا س کے بیان فرمایا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 331
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 331
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/331/mode/1up
    جس سے ثابت ہوا کہ وفات پہلے ہوئی اور رفع بعد ازوفات ہؤا۔اورپھراَور ثبوت یہ ہے کہ اس پیشگوئی میں اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتا ہے کہ میں تیری وفات کے بعد تیرے متبعین کو تیرے مخالفوں پر جو یہودی ہیں قیامت کے دن تک غالب رکھوں گا۔ اب ظاہر ہے اور تمام عیسائی اور مسلمان اس بات کو قبول کرتے ہیں کہ یہ پیشگوئی حضرت مسیح کے بعد اسلام کے ظہورؔ تک بخوبی پوری ہو گئی کیونکہ خدائے تعالیٰ نے یہودیوں کو اُن لوگوں کی رعیّت اورماتحت کردیا جو عیسائی یا مسلمان ہیں اورآج تک صدہا برسوں سے وہ ماتحت چلے آتے ہیں یہ تو نہیں کہ حضرت مسیح کے نزول کے بعد پھر ماتحت ہوں گے۔ ایسے معنے تو بہ بداہت فاسد ہیں۔
    دیکھنا چاہیئے کہ قرآن شریف میں یہ بھی آیت ہے جو حضرت مسیح کی زبان سے اللہ جلّ شانُہ‘ فرماتا ہے 333 ۱؂ یعنی حضرت مسیح فرماتے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے مجھے فرمایا ہے نماز پڑھتارہ اور زکٰوۃ دیتا رہ اور اپنی والدہ پر احسان کرتا رہ جب تک تو زندہ ہے۔ اب ظاہر ہے کہ ان تمام تکلیفات شرعیہ کا آسمان پر بجالانا محال ہے۔ اور جو شخص مسیح کی نسبت یہ اعتقاد رکھتا ہے کہ وہ زندہ مع جسدہ آسمان کی طرف اٹھایا گیا اس کو اس آیت موصوفہ بالا کے منشاء کے موافق یہ بھی ماننا پڑے گا کہ تمام احکام شرعی جو انجیل اورتوریت کی رُو سے انسان پر واجب العمل ہوتے ہیں وہ حضرت مسیح پر اب بھی واجب ہیں حالانکہ یہ تکلیف مالایطاق ہے۔ عجیب بات ہے کہ ایک طرف تو خدا تعالیٰ یہ حکم دیوے کہ اے عیسیٰ جب تک تو زندہ ہے تیر ےؔ پر واجب ہے کہ تو اپنی والدہ کی خدمت کرتا رہے اور پھرآپ ہی اس کے زندہ ہونے کی حالت میں ہی اس کو والدہ سے جدا کردیوے اورتابحیات زکٰوۃ کا حکم دیوے اورپھر زندہ ہونے کی حالت میں ہی ایسی جگہ پہنچادے جس جگہ نہ وہ آپ زکٰوۃ دے سکتے ہیں اور نہ زکٰوۃ کے لئے کسی دوسرے کو نصیحت کرسکتے ہیں اور صلٰوۃ کے لئے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 332
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 332
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/332/mode/1up
    تاکید کرے اور جماعت مومنین سے دور پھینک دیوے جن کی رفاقت صلٰوۃ کی تکمیل کے لئے ضروری تھی۔ کیا ایسے اُٹھائے جانے سے بجُز بہت سے نقصان عمل اور ضائع ہونے حقوق عباد اور فوت ہونے خدمت امر معروف اورنہی منکر کے کچھ اَور بھی فائدہ ہؤا؟ اگر یہی اٹھارہ سواکانوے برس زمین پر زندہ رہتے تو اُن کی ذات جامع البرکات سے کیا کیا نفع خلق اللہ کو پہنچتا لیکن اُن کے اُوپر تشریف لے جانے سے بجُز اس کے اور کونسا نتیجہ نکلا کہ اُن کی اُمت بگڑ گئی اور وہ خدمات نبوت کے بجالانے سے بکلّی محروم رہ گئے۔
    پھر جب ہم اس آیت پر بھی نظر ڈالیں کہ جو اللہ جلّشانُہ‘ قرآن شریف میں فرماتا ہے کہ کوئی جسم کسی بشر کا ہم نے ایسا نہیں بنایا کہ بغیر ر وؔ ٹی کے زندہ رہ سکے تو ہمارے مخالفوں کے عقیدہ کے موافق یہ بھی لازم آتا ہے کہ وہ آسمان پر روٹی بھی کھاتے ہوں پاخانہ بھی پھرتے ہوں اور ضروریات بشرّ یت جیسے کپڑے اور برتن اورکھانے کی چیزیں سب موجود ہوں۔مگر کیا یہ سب کچھ قرآن اور حدیث سے ثابت ہوجائے گا؟ ہرگزنہیں۔ آخر ہمارے مخالف یہی جواب دیں گے کہ جس طرز سے وہ آسمان پر زندگی بسرکرتے ہیں وہ انسان کی معمولی زندگی سے نرالی ہے اور وہ انسانی حاجتیں جو زمین پر زندہ انسانوں میں پائی جاتی ہیں وہ سب اُن سے دورکردی گئی ہیں اور اُن کا جسم اب ایک ایسا جسم ہے کہ نہ خوراک کا محتاج ہے اور نہ پوشاک کااورنہ پاخانہ کی حاجت انہیں ہوتی ہے اور نہ پیشاب کی۔ اورنہ زمین کے جسموں کی طرح اُن کے جسم پر زمانہ اثر کرتاہے اورنہ وہ اب مکلّف احکام شرعیہ ہیں۔ تو اس کا یہ جواب ہے کہ خدائے تعالیٰ تو صاف فرماتا ہے کہ ان تمام خاکی جسموں کے لئے جب تک زندہ ہیں۔ یہ تمام لوازم غیر منفک ہیں جیسا کہ اس نے فرمایا 33 ۱؂ ۔ ظاہر ہے کہ اس آیت میں جُز کے ذکر سے کُل مرادہے یعنی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 333
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 333
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/333/mode/1up
    گو ؔ اُتنا ہی ذکر فرمایا کہ کسی نبی کا جسم ایسا نہیں بنایا گیا جو بغیر طعام کے رہ سکے۔ مگر اس کے ضمن میںُ کل وہ لوازم ونتائج جو طعام کو لگے ہوئے ہیں سب اشارۃ النص کے طور پر فرما دئے۔ سو اگر مسیح ابن مریم اسی جسم خاکی کے ساتھ آسمان پر گیا ہے تو ضرور ہے کہ طعام کھاتا ہو اورپا خانہ اور پیشاب کی ضروری حاجتیں سب اس کی دامنگیرہوں کیونکہ کلام الٰہی میں کذب جائز نہیں۔اور اگر یہ کہو کہ دراصل بات یہ ہے کہ مسیح اس جسم کے ساتھ آسمان پر نہیں گیا بلکہ یہ جسم تو زمین میں دفن کیا گیا اورایک اَور نورانی جسم مسیح کو مِلا جو کھانے پینے سے پاک تھا اس جسم کے ساتھ اُٹھایا گیا تو حضرت یہی تو موت ہے جس کا آخر آپ نے اقرارکرلیا۔ ہمارابھی تو یہی مذہب ہے کہ مقدس لوگوں کو موت کے بعد ایک نورانی جسم ملتا ہے اوروہی نورجو وہ ساتھ رکھتے ہیں جسم کی طرح اُنکے لئے ہو جاتا ہے سو وہ اس کے ساتھ آسمان کی طرف اُٹھائے جاتے ہیں اسی کی طرف اشارہ ہے جو اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتاہے 3 33 ۱؂ یعنی پاک روحیں جو نورانی الوجودہیں خدائے تعالیٰ کی طرف صعود کرتی ہیں اور عمل صالح اُن ؔ کارفع کرتا ہے یعنی جس قدرعمل صالح ہو اُسی قدرروح کا رفع ہوتاہے۔
    اس جگہ خدائے تعالیٰ نے روح کا نام کلمہ رکھا۔ یہ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ درحقیقت تمام ارواح کلمات اللہ ہی ہیں جو ایک لا یُدرک بھید کے طور پر جس کی تہ تک انسان کی عقل نہیں پہنچ سکتی روحیں بن گئی ہیں۔ اسی بنا ء پر اس آیت کا مضمون بھی ہے 33 ۲؂ ۔اورچونکہ یہ سِرّ ربوبیت ہے اس لئے کسی کی مجال نہیں کہ اس سے بڑھ کر کچھ بول سکے کہ کلمات اللہ ہی بحکم و باذن ربّی لباس روح کا پہن لیتے ہیں اور ان میں وہ تمام طاقتیں اورقوتیں اور خاصیتیں پیداہوجاتی ہیں جو روحوں میں پائی جاتی ہیں اور پھر چونکہ ارواح طیّبہ فنا فی اللہ ہونے کی حالت میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 334
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 334
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/334/mode/1up
    اپنے تمام قویٰ چھوڑ دیتی ہیں اور اطاعت الٰہی میں فانی ہوجاتی ہیں تو گویا پھر وُہ روح کی حالت سے باہر آکر کلمۃ اللہ ہی بن جاتی ہیں جیسا کہ ابتدا میں وہ کلمۃ اللہ تھیں۔ سو کلمۃ اللہ کے نام سے ان پاک روحوں کو یاد کرنا اُن کے اعلیٰ درجہ کے کمال کی طرف اشارہ ہے سو انہیں نورکا لباس ملتا ہے اور اعمال صالحہ کی طاقت سے اُن کاخدائے تعالیٰ کی طرف رفع ہوتا ہے ۔
    اور ہمارے ظاہربین علماء اپنے محدود خیالات کی وجہ سے کلماتؔ طیّبہ سے مراد محض عقائد یا اذکار واشغال رکھتے ہیں اور اعمال صالحہ سے مرادبھی اذکار وخیرات وغیرہ ہیں۔ تو گویا وہ اس تاویل سے علّت او ر معلول کو ایک کردیتے ہیں۔اگر چہ کلمات طیّبہ بھی خدائے تعالیٰ کی طرف ہی رجوع کرتے ہیں لیکن عارفوں کے لئے یہ بطنی معنے ہیں جن پر قرآن کریم کے دقیق اشارات مشتمل ہیں۔
    (۱۵) سوال۔ مسیح ابن مریم نے تو بہت سے معجزات سے اپنے منجانب اللہ ہونے کاثبوت دیا تھا آپ نے کیا ثبو ت دیا۔ کیا کوئی مُردہ زندہ کردیایا کوئی مادرزاد اندھا آپ سے اچھا ہؤا۔ اگر ہم فرض بھی کر لیں کہ آپ مثیل مسیح ہیں توہمیںآپ کے وجود سے کیا فائدہ ہوا؟
    امّاالجواب۔ پس واضح ہو کہ انجیل کو پڑھ کر دیکھ لو کہ یہی اعتراض ہمیشہ مسیح پر رہا کہ اس نے کوئی معجزہ تو دکھایا ہی نہیں یہ کیسا مسیح ہے۔ کیونکہ ایسا مردہ تو کوئی زندہ نہ ہوا کہ وہ بولتا اوراُس جہان کا سب حال سُناتا اوراپنے وارثوں کو نصیحت کرتا کہ میں تو دوزخ میں سے آیا ہوں تم جلد ایمان لے آؤ۔ اگر مسیح صاف طور پر یہودیوں کے باپ دادے زندہ کرکے دکھا دیتا اوراُن سے گواہی دلواتا تو بھلا کس کو انکارکی مجال تھی ؔ غرض پیغمبروں نے نشان تو دکھائے مگر پھر بھی بے ایمانوں سے مخفی رہے۔ ایسا ہی یہ عاجز بھی خالی نہیں آیا بلکہ مُردوں کے زندہ ہونے کے لئے بہت سا آبِ حیات خدائے تعالیٰ نے اس عاجز کو بھی دیا ہے بے شک جو شخص اس میں سے پئے گا زندہ ہوجائے گا۔بلاشبہ میں اقرارکرتا ہوں کہ اگر میرے کلام سے مردے زندہ نہ ہوں اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 335
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 335
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/335/mode/1up
    اندھے آنکھیں نہ کھولیں اور مجذوم صاف نہ ہوں تو میں خدائے تعالیٰ کی طرف سے نہیں آیا کیونکہ خدائے تعالیٰ نے آپ اپنے پاک کلام میں میری طرف اشارہ کر کے فرمایا ہے نبی ناصری کے نمونہ پر اگر دیکھا جائے تو معلوم ہو گا کہ وہ بندگانِ خداکو بہت صاف کررہا ہے اس سے زیادہ کہ کبھی جسمانی بیماریوں کو صاف کیاگیا ہو۔
    یقینًا سمجھو کہ روحانی حیات کا تخم ایک رائی کے بیج کی طرح بویا گیا مگر قریب ہے ہاں بہت قریب ہے کہ ایک بڑادرخت ہو کر نظر آئے گا۔ جسمانی خیالات کا ا ؔ نسان جسمانی باتوں کو پسند کرتا ہے اور اُن کو بڑی چیز سمجھتا ہے مگرجس کو کچھ روحانیت کا حصہ دیاگیا ہے وہ روحانی زندگی کا طالب ہوتاہے۔ خدا تعالیٰ کے راستباز بندے دنیا میں اس لئے نہیں آتے کہ لوگوں کو تماشے دکھلائیں بلکہ اصل مطلب اُن کا جذب الی اللہ ہوتا ہے اور آخرکاروہ اسی قوت قدسیہ کی وجہ سے شناخت کئے جاتے ہیں۔ وہ نور جو اُن کے اندر قوتِ جذب رکھتاہے اگرچہ کوئی شخص امتحان کے طورسے اس کو دیکھ نہیں سکتا بلکہ ٹھوکر کھاتا ہے۔ مگر وہ نور آپ ہی ایک ایسی جماعت کو اپنی طرف کھینچ کر جو کھینچے جانے کے لائق ہے اپنا خارق عادت اثر ظاہرکردیتاہے۔
    (۱) خدائے تعالیٰ کے خالص دوستوں کی یہ علامتیں ہیں کہ ایک خالص محبت انکو عطاکی جاتی ہے جس کا اندازہ کرنا اس جہان کے لوگوں کا کام نہیں۔
    (۲) اُن کے دلوں پر ایک خوف بھی ہوتا ہے جس کی وجہ سے وہ دقائق اطاعت کی رعایت رکھتے ہیں ایسا نہ ہو کہ یارِ قدیم آزردہ ہوجائے۔
    (۳) ان کو خارق عادت استقامت دی جاتی ہے کہ اپنے وقت پر دیکھنےؔ والوں کو حیران کردیتی ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 336
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 336
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/336/mode/1up
    (۴) جب اُن کو کوئی بہت ستاتاہے اورباز نہیں آتا تو اُن کے لئے غضب اس ذات قوی کا جو اُن کا متولّی ہے یکدفعہ بھڑکتا ہے۔
    (۵) جب اُن سے کوئی بہت دوستی کرتا ہے اور سچی وفاداری اوراخلاص کے ساتھ اُن کی راہ میں فداہوجاتاہے تو خدائے تعالیٰ اس کو اپنی طرف کھینچتا ہے اور اس پر ایک خاص رحمت نازل کرتاہے۔
    (۶) اُن کی دعائیں بہ نسبت اَوروں کے بہت زیادہ قبو ل ہوتی ہیں یہاں تک کہ وہ شمار نہیں کرسکتے کہ کس قدر قبول ہوئیں۔
    (۷)اُن پر اکثر اسرار غیب ظاہر کئے جاتے ہیں اور وہ باتیں جو ابھی ظہورمیں نہیں آئیں اُن پر کھولی جاتی ہیں اگر چہ اَور مومنوں کو بھی سچی خوابیں اورسچے مکاشفات معلوم ہوجاتے ہیں مگر یہ لوگ تمام دنیا سے نمبراوّل پر ہوتے ہیں۔
    (۸) خدائے تعالیٰ خاص طور پر اُن کا متولّی ہوجاتا ہے اور جس طرح اپنے بچوں کی کوئی پرورش کرتا ہے اس سے بھی زیادہ نگاہِ رحمت اُن پر رکھتاہے۔
    (۹) ؔ جب اُن پر کوئی بڑی مصیبت کا وقت آتا ہے تو اُس وقت دوطورمیں سے ایک طور کا ان سے معاملہ ہوتا ہے یا خارق عادت طور پر اس مصیبت سے رہائی دی جاتی ہے اور یا ایک ایسا صبر جمیل عطا کیا جاتاہے جس میں لذّت اور سرور اور ذوق ہو۔
    (۱۰)اُن کی اخلاقی حالت ایک ایسے اعلیٰ درجہ کی کی جاتی ہے جو تکبّر اور نخوت اور کمینگی اور خود پسندی اورریاکاری اورحسد اور بُخل اورتنگدلی سب دور کی جاتی ہے اور انشراح صدر اور بشاشت عطا کی جاتی ہے۔
    (۱۱) اُن کی توکّل نہایت اعلیٰ درجہ کی ہوتی ہے اور اس کے ثمرات ظاہرہوتے رہتے ہیں۔
    (۱۲) اِن کوان اعمال صالحہ کے بجالانے کی قوت دی جاتی ہے جو دوسرے اُن میں کمزورہوتے ہیں۔
    (۱۳) اُن میں ہمدردی خلق اللہ کا مادہ بہت بڑھایاجاتا ہے اور بغیر توقع کسی اجر اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 337
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 337
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/337/mode/1up
    بغیر خیال کسی ثوا ب کے انتہائی درجہ کا جوش اُن میں خلق اللہ کی بھلائی کے لئے ہوتاہے اور خود بھی نہیں سمجھ سکتے کہ اؔ س قدر جوش کس غرض سے ہے کیونکہ یہ امر فطرتی ہوتاہے۔
    (۱۴) خدائے تعالیٰ کے ساتھ ان لوگوں کو نہایت کامل وفاداری کاتعلق ہوتاہے اور ایک عجیب مستی جانفشانی کی اُن کے اندرہوتی ہے اور اُن کی روح کو خدائے تعالیٰ کی روح کے ساتھ وفاداری کا ایک رازہوتا ہے جس کو کوئی بیان نہیں کرسکا۔ اس لئے حضرت احدیت میں اُن کا ایک مرتبہ ہوتا ہے جس کو خلقت نہیں پہچانتی وہ چیز جو خاص طور پر اُن میں زیادہ ہے اور جو سر چشمہ تمام برکات کا ہے اور جس کی وجہ سے یہ ڈوبتے ہوئے پھر نکل آتے ہیں اورموت تک پہنچ کر پھر زندہ ہوجاتے ہیں اور ذلتیں اُٹھا کر پھر تاجِ عزت دکھا دیتے ہیں اور مہجوراور اکیلے ہوکر پھر ناگہاں ایک جماعت کے ساتھ نظرآتے ہیں وہ یہی رازوفاداری ہے جس کے رشتہ محکم کو نہ تلواریں قطع کرسکتی ہیں اور نہ دنیا کا کوئی بلوہ اور خوف اور مفسدہ اس کو ڈھیلا کرسکتا ہے۔ السّلام علیہم من اللّٰہ وملآئکتہٖ ومن الصلحاء اجمعین۔
    (۱۵) پندرہویں علامت ان کی علم قرآن کریم ہے۔ قرآن کریم کے معارف اورحقا؂ئق ولطائف جس قدر ان لوگوں کو دئے جاتے ہیں دوسرے لوگوں کو ہرگزنہیں دئے جاتے۔یہ لوگ وہی مطہّرون ہیں جن کے حق میں اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتا ہے 33 ۱؂
    (۱۶) ان کی تقریروتحریر میں اللہ جلَّ شَانُہٗ ایک تاثیررکھ دیتاہے جو علماء ظاہری کی تحریروں وتقریروں سے نرالی ہوتی ہے اور اس میں ایک ہیبت اور عظمت پائی جاتی ہے اور بشرطیکہ حجاب نہ ہو دلوں کو پکڑ لیتی ہے۔
    (۱۷) اُن میں ایک ہیبت بھی ہوتی ہے جو خدائے تعالیٰ کی ہیبت سے رنگین ہوتی ہے کیونکہ خدائے تعالیٰ ایک خاص طور پر اُن کے ساتھ ہوتا ہے اور اُن کے چہروں پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 338
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 338
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/338/mode/1up
    عشق الٰہی کا ایک نور ہوتاہے جو شخص اس کو دیکھ لے اُس پر نار جہنم حرام کی جاتی ہے۔ اُن سے ذنب اور خطابھی صادر ہوسکتا ہے مگر اُن کے دلوں میں ایک آگ ہوتی ہے جو ذنب اورخطا کو بھسم کردیتی ہے اور ان کی خطا ٹھہرنے والی چیز نہیں بلکہ اس چیز کی مانندہے جو ایک تیز چلنے والے پانی میں بہتی ہوئی چلی جاتی ہے۔ سو اُن کا نکتہ چین ہمیشہ ٹھوکرکھاتا ہے۔
    (۱۸) خدائے تعالیٰ اُن کو ضائع نہیں کرتا اور ذلّت اور خواری کی مار اُن پر نہیں مارتا کیونکہ و ہ اس کے عزیز اور اس کے ہاتھ کے پودے ہیں۔ ان کو اس لئے بلندی سے نہیں گراتا کہ تاہلاک کرے بلکہ اس لئے گراتا ہے کہ تا اُن کا خارق عادت طور پر بچ جانا دکھاوے۔ انؔ کو اس لئے آگ میں دھکا نہیں دیتاتا اُن کو جلا کر خاکستر کر دیوے بلکہ اس لئے دھکا دیتا ہے تا لوگ دیکھ لیویں کہ پہلے تو آگ تھی مگر اب کیسا خوشنما گلزار ہے۔
    (۱۹) ان کو موت نہیں دیتا جب تک وہ کام پور ا نہ ہو جائے جس کے لئے وہ بھیجے گئے ہیں اور جب تک پاک دلوں میں اُن کی قبولیت نہ پھیل جائے تب تک البتہ سفرِ آخرت ان کو پیش نہیں آتا۔
    (۲۰) اُن کے آثارخیر باقی رکھے جاتے ہیں اور خدائے تعالیٰ کئی پشتوں تک اُن کی اولاد اوران کے جانی دوستوں کی اولاد پرخاص طور پر نظرِ رحمت رکھتا ہے اور ان کا نام دنیا سے نہیں مٹاتا۔
    یہ آثاراولیاء الرحمن ہیں اور ہریک قسم ان میں سے اپنے وقت پر جب ظاہرہوتی ہے تو بھاری کرامت کی طرح جلوہ دکھاتی ہے۔مگر اس کا ظاہر کرنا خدائے تعالیٰ کے ہی اختیار میں ہوتاہے۔
    اب یہ عاجز بحکم 3 ۱؂ اس بات کے اظہار میں کچھ مضائقہ نہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 339
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 339
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/339/mode/1up
    دیکھتا کہ خداوند کریم ورحیم نے محض فضل وکرم سے اِن تمام امور سے اس عاجز کو حصہ وافرہ دیا ہے اور اس ناکارہ کو خالیؔ ہاتھ نہیں بھیجا اور نہ بغیر نشانوں کے مامورکیا۔ بلکہ یہ تمام نشان دئے ہیں جو ظاہرہورہے ہیں اورہوں گے اورخدائے تعالیٰ جب تک کھلے طورپر حجت قائم نہ کرلے تب تک ان نشانوں کو ظاہر کرتاجائے گا۔ اور یہ جو کہا کہ تمہارے وجود سے ہمیں کیا فائدہ؟ تو اس کے جواب میں یاد رکھنا چاہیئے کہ جو شخص مامورہوکر آسمان سے آتا ہے اس کے وجود سے علیٰ حسب مراتب سب کو بلکہ تمام دنیا کو فائدہ ہوتا ہے اور درحقیقت وہ ایک روحانی آفتاب نکلتا ہے جس کی کم و بیش دُور دُور تک روشنی پہنچتی ہے۔ اور جیسی آفتاب کی مختلف تاثیریں حیوانات ونباتات وجمادات اور ہریک قسم کے جسم پر پڑ رہی ہیں اور بہت کم لوگ ہیں جو اُن تاثیروں پر باستیفا علم رکھتے ہیں۔ اسی طرح وہ شخص جو مامورہو کر آتا ہے تمام طبائع اوراطراف اکناف عالم پر اس کی تاثیریں پڑتی ہیں اورجبہی سے کہ اس کا پُر رحمت تعیّن آسمان پر ظاہرہوتاہے آفتاب کی کرنوں کی طرح فرشتے آسمان سے نازل ہونے شروع ہوتے ہیں اوردنیا کے دُور دُور کناروں تک جو لوگ راستبازی کی استعداد رکھتے ہیں ان کو سچائی کی طرف قدم اٹھانے کی قوت دیتے ہیں اورپھرخود بخود نیک نہادلوگوں کی طبیعتیں سچ کی طرف مائل ہوتی جاتی ہیں۔ سو یہ سب اس ؔ ربّانی آدمی کی صداقت کے نشان ہوتے ہیں۔ جس کے عہد ظہورمیں آسمانی قوتیں تیز کی جاتی ہیں۔ سچی وحی کا خدائے تعالیٰ نے یہی نشان دیا ہے کہ جب وہ نازل ہوتی ہے توملائک بھی اس کے ساتھ ضرور اُترتے ہیں اور دُنیا دن بدن راستی کی طرف پلٹاکھاتی جاتی ہے۔ سو یہ عام علامت اُس مامور کی ہے جو خدائے تعالیٰ کی طرف سے آتا ہے اور خاص علامتیں وہ ہیں جو ابھی ہم ذکر کرچکے ہیں۔
    (۱۶) سوال۔ انجیل میں لکھا ہے کہ مسیح جلال کے ساتھ دُنیا میں آئے گا اور دُنیا اس کو قبول کرلے گی۔ لیکن اس جگہ جلالی ظہور کی کوئی علامت نہیں اور نہ دُنیا نے قبول کیا ہے؟
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 340
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 340
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/340/mode/1up
    ا مّا الجواب۔ یہ ذکر جو انجیل متی باب پچیس ۲۵ آیت ۳۱ سے ۴۶ تک ہے۔ جو ابن آدم اپنے جلال سے آوے گا اور سب پاک فرشتے اس کے ساتھ ہوں گے یہ درحقیقت اس دنیا سے متعلق نہیں بلکہ اس قسم کا آنا اس دنیا کے قطع سلسلہ کے بعد ہے جو حشر اجساد کے بعد وقوع میں آویگا۔ جب ہریک مقدّس نبی اپنے جلال میں ظہورکرے گا اور اپنی اُمت کے راستبازوں کو خوشخبری دے گا اورنافرمانوں کو ملزم کرے گا لیکن انہی آیات میں ؔ مسیح نے بتلا دیا کہ میرا آنا غریبی کی حالت میں بھی ہو گا جیسا کہ اسی انجیل کی چونتیسویں آیت میں لکھاہے۔ اے میرے باپ کے مبارک لوگو! اس بادشاہت کوجو دنیا کی بنیاد ڈالنے سے تمہارے لئے طیار کی گئی میراث میں لو۔ کیونکہ میں بھوکا تھا تم نے مجھے کھانا کھلایا میں پیاسا تھاتم نے مجھے پانی پلایا میں پردیسی تھا تم نے مجھے اپنے گھر میں اُتاراننگا تھا تم نے مجھے کپڑا پہنایا۔ بیمار تھا تم نے میری عیادت کی۔قید میں تھا تم میرے پاس آئے۔ راستباز اُسے جواب میں کہیں گے۔ اے خداوند کب ہم نے تجھے بھوکا دیکھا اور کھانا کھلایا یا پیاسا اور پانی پلایا۔ کب ہم نے تجھے پردیسی دیکھا اوراپنے گھر میں اُتار ا یاننگا تھا اور کپڑا پہنایا۔ ہم کب تجھے بیمار اور قید میں دیکھ کر تجھ پاس آئے۔ تب بادشاہ اُن سے جواب میں کہے گا میں تم سے سچ سچ کہتا ہوں کہ جب تم نے میرے ان سب سے چھوٹے بھائیوں میں سے ایک کے ساتھ کیا تو میرے ساتھ کیا۔تب وہ بائیں طرف والوں سے بھی کہے گا۔ اے ملعونو! میرے سامنے سے اس ہمیشہ کی آگ میں جاؤجو شیطان اور اس کے فرشتوں کے لئے تیار کی گئی ہے۔ کیونکہ میں بھوکا تھا پر تم نے مجھےؔ کھانے کونہ دیا۔ پیاسا تھا تم نے مجھے پانی نہ پلایا۔ پردیسی تھا تم نے مجھے اپنے گھر میں نہ اُتارا۔ننگا تھاتم نے مجھے کپڑا نہ پہنایا۔ بیماراورقیدمیں تھا تم نے میری خبر نہ لی۔ تب وے بھی جواب میں اُسے کہیں گے اے خداوند کب ہم نے تجھے بھوکا یا پیاسا یا پردیسی یا ننگایا بیمار یا قیدی دیکھا اور تیری خدمت نہ کی۔ تب وہ انہیں جواب میں کہے گا میں تم سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 341
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 341
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/341/mode/1up
    سچ کہتاہوں کہ جب تم نے میرے ان سب چھوٹے بھائیوں میں سے ایک کے ساتھ نہ کیا تو میرے ساتھ بھی نہ کیا۔ اور وہ ہمیشہ کے عذاب میں جائیں گے پر راستباز ہمیشہ کی زندگی میں۔
    اب غور کرنا چاہیئے کہ ان تمام آیات سے ظاہر ہے کہ مسیح نے اپنے بعض مثیلوں کا ذکر کر کے اُن کا دنیا میں آنا اور تکلیف اٹھانا گویا اپنا آنا اورتکلیف اُٹھانا قرار دیاہے اور چھوٹے بھائیوں سے مراد بجُز اُن کے اَور کون لوگ ہوسکتے ہیں جو کسی قدرمسیح کے منصب اور مسیح کی طبیعت اور مسیح کے درجہ سے حصّہ لیں اور اس کے نام پرمامور ہوکر آویں۔ عیسائی تونہیں کہہ سکتے کہ ہم مسیح کے بھائی ہیں۔اورکچھ شک نہیں کہ محدّث نبی کا چھوٹا بھائی ہوتاہے اور تمام انبیاء ِ علّاتی بھائی کہلاؔ تے ہیں۔ اور یہ نہایت لطیف اشارہ ہے جومسیح نے اُن کا آنا اپنا آنا قراردیا ہے۔ اور یہ بھی یاد رکھنا چاہیئے کہ یہ آنا اس عاجز کا نسبتی طور پر جلالی آنا بھی ہے کیونکہ خدائے تعالیٰ کی طرف سے توحید کی اشاعت کے لئے یہ بڑی بڑی کامیابیوں کی تمہید ہے۔اور جلالی آنے سے مراد اگر طریق سیاست رکھاجاوے تو یہ درست نہیں۔یہ بات انصاف سے بعید ہے کہ کوئی شخص غافلوں کے جگانے کے لئے مامور ہو کر آوے اور آتے ہی زدوکوب اور قتل اور سفک دماء سے کام لیوے جب تک پورے طور سے اتمام حجت نہ ہو خدائے تعالیٰ کسی قوم پر عذاب نازل نہیں کرتا۔ غرض مسیح کا جلالی طور پرآنا جن معنوں سے عیسائی بیان کرتے ہیں وہ اس دنیا سے متعلق نہیں۔اس دنیا میں جو مسیح کے آنے کاوعدہ ہے اس وعدہ کو ایسے جلالی طور سے کچھ علاقہ نہیں۔ عیسائیوں نے بات کو کہیں کا کہیں ملا دیا ہے اور حق الامرکو اپنے پر مشتبہ کردیا ہے۔چنانچہ متی کی آیات مذکورہ بالا تو صاف بیان کر رہی ہیں کہ یہ جلالی طور کا آنا اُس وقت ہو گا کہ جب حشر اجساد کے بعد ہر یک کا حساب ہوگا کیونکہ بجُز حشر اجساد کے کامل طور پر شریروں اور راستبازوں کی جماعتیں جو فوت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 342
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 342
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/342/mode/1up
    ہو چکی ہیں کیونکر ایک جگہ اکٹھی ہوسکتی ہیں۔لیکن برخلاف اس مضمون کے جو متی کے پچیس ۲۵ باب آیات مذکورہ بالا سے ظاہر ہوتاہے متی کے چوبیسویں باب سے اسی دنیا میں مسیحؔ کا آنا بھی سمجھاجاتاہے اور دونوں قسم کے بیانات میں تطبیق اس طرح ہو سکتی ہے کہ آخرت میں جو حشر اجساد کے بعد آئے گا وہ خود مسیح ہے لیکن دنیامیں مسیح کے نام پر آنیوالا مثیل مسیح ہے جو اس کا چھوٹا بھائی اور اُسی کے قول کے مطابق اس کے وجود میں داخل ہے۔دنیا میں آنے کی نسبت مسیح نے صاف کہہ دیا کہ پھر مجھے نہیں دیکھو گے پس وہ کیوں کر دنیا میں آسکتاہے حالانکہ وہ خود کہہ گیا ہے کہ پھرمجھے نہیں دیکھو گے۔
    یہ بھی یادرکھناچاہیئے کہ دنیا کے قبول کرنے کے لئے یہ ضروری نہیں کہ وہ اُسی وقت قبول کرلیوے۔ دنیا ہمیشہ آہستہ آہستہ مانتی ہے۔اُن لوگوں کا ہونا بھی تو ضروری ہے کہ جو ایمان نہیں لائیں گے مگر مسیح کے دم کی ہوا سے مریں گے۔ دم کی ہوا سے مرنا حجت قاطعہ سے مرنا ہے۔انجیلوں میں بھی تولکھا ہے کہ مسیح کے نزول کے وقت بعض پکڑے جائیں گے اوربعض چھوڑے جائیں گے یعنی بعض پر عذاب نازل کرنے کے لئے حجت قائم ہوجائے گی۔گویا وہ پکڑے گئے اوربعض نجات پانے کے لئے استحقا ق حاصل کرلیں گے گویا نجات پا گئے۔
    (۱۷) سوال۔ اِس وقت مثیلِ مسیح کے آنے کی کیا ضرورت تھی ؟
    امّاؔ الجواب۔ اِ س وقت مثیل مسیح کی سخت ضرورت تھی اور نیز اُن ملائک کی جو زندہ کرنے کے لئے اُترا کرتے ہیں سخت حاجت تھی کیونکہ روحانی موت اور غفلت ایک عالم پر طاری ہوگئی ہے اور اللہ جلَّ شَانُہٗ کی محبت ٹھنڈی ہوگئی اور سخت دلی اور دنیا پرستی پھیل گئی اور وہ تمام وجوہ پیدا ہوگئے جن کی وجہ سے توریت کی تائید میں مسیح ابن مریم دنیا میں آیا تھا۔ اور دجّال نے بھی بڑے زور کے ساتھ خروج کیا اور حضرت آدم کی پیدائش کے حساب سے الف ششم کا آخری حصہ آگیا جو بموجب آیت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 343
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 343
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/343/mode/1up
    چھٹے دن کے قائم مقام ہے۔سو ضرورتھاکہ اس چھٹے دن میں آدم پیدا ہوتا جو اپنی روحانی پیدائش کی رُو سے مثیل مسیح ہے اس لئے خدائے تعالیٰ نے اس عاجز کو مثیل مسیح اور نیزآدم الف ششم کر کے بھیجا جیساکہ اُس نے فرمایا جو براہین میں چھپ چکا ہے اور وہ یہ ہے اردت ان استخلف فخلقت اٰدم یعنی میں نے ارادہ کیا جو اپنا خلیفہ پیداکروں سو میں نے آدم کو پیدا کیا۔ پھر دوسری جگہ فرماتاہے خلق اٰدم فاکرمہ یعنی آدم کو پیدا کیا پھر اس کو عزت بخشی اور جیسا کہ آدم کو تحقیر کی نظر سے دیکھاگیا اور مفسد قرار دیاؔ گیا۔ یہی صورت اس جگہ بھی پیش آئی۔اورچونکہ آدم اور مسیح میں باہم مماثلت ہے اس لئے اس عاجز کانام آدم بھی رکھا گیا اور مسیح بھی۔
    (۱۸) سوال۔ ابن صیّاد کو اگر مسیح دجّال قراردیا گیا ہے تو اس سے مسلم کی دمشق والی حدیث کو کیا نقصان پہنچتا ہے کیونکہ بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ ابن صیّاد گم ہو گیا اور قیامت کے قریب پھر ظاہر ہو گا۔
    امّاالجواب۔ ابن صیّاد کا گم ہونا روایت صحیح سے ہرگز ثابت نہیں۔ لیکن اس کا ایمان لانا اور مرنا ثابت ہے۔ جیسا کہ ہم پہلے بھی لکھ چکے ہیں اورمدینہ میں فوت ہونا اس کا بپایہ ثبوت پہنچ چکاہے۔ علاوہ اس کے فرض محال کے طور پر اگر وہ مفقود الخبر بھی ہو تو کیا اِس سے اُس کا اب تک زندہ رہنا ثابت ہو جائے گا ؟ کیا اب آپ کو وہ صحیح حدیثیں بھی بھول گئیں کہ جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ ہمارے زمانہ سے سو برس تک کوئی انسان زمین پر زندہ نہیں رہے گا۔
    یہ بات یاد رہے کہ شیعہ لوگ امام محمد مہدی کی نسبت بھی یہ اعتقاد رکھتے ہیں کہ وہ زندہ ہونے کی حالت میں ہی ایک غار میں چھپ گئے اور مفقود ہیں اور قریب قیامت ظاہر ہوں گے اور سنّت جماعت کے لوگ اُن کے اسؔ خیال کو باطل تصورکرتے ہیں اور یہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 344
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 344
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/344/mode/1up
    حدیثیں پیش کرتے ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ سو برس کے بعد کوئی شخص زمین پر زندہ نہیں رہ سکتا۔ سو سُنّت جماعت کا یہ مذہب ہے کہ امام محمد مہدی فوت ہوگئے ہیں اورآخری زمانہ میں انہیں کے نام پر ایک اور امام پیداہوگا۔لیکن محققین کے نزدیک مہدی کا آنا کوئی یقینی امر نہیں ہے۔
    اس جگہ مجھے غورکرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ درحقیقت اس مسئلہ میں شیعہ اور سنّت جماعت میں جو اختلاف ہے اُس میں کسی تاریخی غلطی کو دخل نہیں بلکہ اصل بات یہ ہے کہ شیعہ کی روایات کی بعض سادات کرام کے کشفِ لطیف پر بنیاد معلوم ہوتی ہے چونکہ ائمہ اثنا عشرنہایت درجہ کے مقدّس اور راستباز اوراُن لوگوں میں سے تھے جن پر کشف صحیح کے دروازے کھولے جاتے ہیں اس لئے ممکن اور بالکل قرین قیاس ہے جو بعض اکابر ائمہ نے خدائے تعالیٰ سے الہام پاکر اس مسئلہ کو اُسی طرز اور ایسے رنگ سے بیان کیا ہوجیسا کہ ملاکی کی کتاب میں ملاکی نبی نے ایلیاہ نبی کے دوبارہ آنے کا حال بیان کیا تھا اور جیسا کہ مسیح کے دوبارہ آنے کاشور مچا ہوا ہے اور درحقیقت مراد صاحبِ کشف کی یہ ہو گی کہ کسی زمانہ میں اؔ س امام کے ہمرنگ ایک اَور امام آئے گا جو اس کا ہمنام اورہم قوت اور ہم خاصیت ہوگا گویا وہی آئے گا۔ پھر یہ لطیف نکتہ جب جسمانی خیالات کے لوگوں میں پھیلا تو اُن لوگوں نے موافق اپنی موٹی سمجھ کے سچ مچ یہی اعتقاد کرلیا ہو گا کہ وہ امام صدہا برس سے کسی غارمیں چھپا ہوا ہے اور آخری زمانہ میں باہر نکل آئے گا۔ مگر ظاہر ہے کہ ایسا خیال صحیح نہیں ہے۔یہ عام محاورہ کی بات ہے کہ جب کوئی شخص کسی کا ہمرنگ اور ہم خاصیت ہو کر آتا ہے تو کہتے ہیں کہ گویا وہی آگیا متصوّفین بھی اِن باتوں کے عام طور پر قائل ہیں اور کہتے ہیں کہ بعض اولیاء گذشتہ کی روحیں اُن کے بعد میں آنے والے ولیوں میں سماتی رہی ہیں اور اس قول سے اُنکا مطلب یہ ہے کہ بعض ولی بعض اولیاء کی قوت اور طبع لیکر آتے ہیں گویا وہی ہوتے ہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 345
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 345
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/345/mode/1up
    (۱۹) سوال۔ اگر مسیح ابن مریم درحقیقت فوت ہوگیاہے تو پھر کیا یہ بات جو تیرہ سو برس سے آج تک مشہور چلی آتی ہے کہ مسیح زندہ آسمان کی طرف اُٹھایا گیا آج غلط ثابت ہوگئی؟
    امّاالجواب۔ پس واضح ہو کہ یہ بالکل افتراء ہے کہ تیرہ سو برس سے بالاجماع یہی مانا گیاہے کہ مسیح جسم کے ساتھ زندہ آسمان پر اٹھایاگیاہے۔ ظاہر ہے ؔ کہ اگر سلف اور خلف کا کسی ایک بات پر اجماع ہوتا تو تفسیروں کے لکھنے والے متفرق قولوں کو نہ لکھتے لیکن کونسی ایسی تفسیر ہے جو اس بارہ میں اقوال متفرقہ سے خالی ہے۔کبھی کہتے ہیں کہ مسیح نیند کی حالت میں اُٹھایا گیا اورکبھی کہتے ہیں کہ وہ مر گیا اور اس کی روح اٹھائی گئی اور کبھی قرآن شریف کی غلطی نکالتے ہیں اور کہتے ہیں کہ آیت 3 ۱؂ میں دراصل مُتَوَفِّیْکَ بعد میں ہونا چاہیئے اور رَافِعُکَ اِلَیَّ اس سے پہلے۔اب ظاہر ہے کہ اگر اُن کا اجماع ایک خاص شق پر ہوتا تو اپنی تفسیروں میں مختلف اقوال کیوں جمع کرتے۔اورجب ایک خاص بات پر یقین ہی نہیں تو پھر اجماع کہاں۔اوریہ اعتراض کہ تیرہ سو برس کے بعد یہ بات تمہیں کو معلوم ہوئی۔ اس کا جواب یہ ہے کہ درحقیقت یہ قول نیا تونہیں پہلے راوی اس کے تو ابن عباس ہی تھے لیکن اب خدائے تعالیٰ نے اس عاجز پراس قول کی حقیقت ظاہرکر دی اور دوسرے اقوال کا بطلان ثابت کردیا تا قولی طور پر اپنے ایک عاجز بندہ کی اس طرح پر ایک کرامت دکھاوے اور تا عقلمند لوگ سمجھ جاویں کہ یہ رہبری خاص خدائے تعالیٰ کی طرف سے ہے۔ کیونکہ اگر یہ معمولی فہم اور عقل کاکام ہوتا تو دوسرے لوگ بھی اس صداقت کو مع اِس کے اُن سب دلائل کے جو اِن رسالوں میں درج ہوچکے ہیں بیان کرسکتے۔
    ابؔ یہ تمام سوالات ختم ہوئے اوران سوالات سے بجز اس کے کہ صداقت اوربھی ظاہر ہو اور چمکے کوئی نقصان نہیں پہنچ سکا۔ اس رسالہ کے ناظرین جو اول سے آخر تک اس رسالہ کو پڑھیں گے بخوبی یقین کرلیں گے کہ ہمارے مخالفین کے ہاتھ میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 346
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 346
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/346/mode/1up
    بجُز اوہام کے اَور کچھ بھی نہیں اور وہ ہر طرف سے شکست کھا کر بار باریہ وہم پیش کرتے ہیں کہ ابن مریم کا اُترنا کتابوں میں لکھاہوا ہے اور ہماری اس بات کوسمجھ نہیں سکتے کہ کیا خدائے تعالیٰ باعتبار بعض صفات خاصہ کے کسی دوسرے کانام ابن مریم نہیں رکھ سکتا۔ تعجب کہ آپ توہمیشہ اپنی اولاد کے پیغمبروں کے نام رکھتے ہیں بلکہ ایک ایک نام میں دودو پیغمبروں کے نام ہوتے ہیں جیسے محمدیعقوب،محمدابراہیم،محمد مسیح، محمد عیسیٰ، محمد اسمٰعیل،احمد ہارون۔ لیکن اگر خدائے تعالیٰ کسی اپنے بندہ کو اِن ناموں میں سے کسی نام کے ساتھ پکارے یا ان نبیوں کے ناموں اور کُنیتوں میں سے کوئی نام یا کنیت کسی اپنے مامورکو عطاکرے تو یہ کفرسمجھتے ہیں گویا جوکام انہیں کرناجائز ہے وہ خدائے تعالیٰ کو کرنا جائز نہیں۔نہیں دیکھتے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم فرماگئے ہیں کہ اس اُمت میں مثیل انبیاء بنی اسرائیل آئیںؔ گے تو کیا ضروری نہ تھاکہ وہ مثیل دنیا میں آتے۔ پھر اگر خدائے تعالیٰ نے مثیل مسیح ہونے کی وجہ سے کسی کا نام ابن مریم رکھ دیا تو کیا برا کیا۔اور قرینہ ظاہرہے کہ فوت شدہ تو دوبارہ دنیامیں نہیں آسکتااور نہ خدائے تعالیٰ انبیاء پر دوموتیں واردکرتا ہے اور اس کا حکم بھی ہے کہ جو شخص اس دنیا سے گیا وہ گیا۔ جیسا کہ وہ فرماتاہے33 ۱؂ یعنی جس پر موت وارد کی گئی وہ پھرکبھی دنیا میں آنہیں سکتا۔اور پھر فرمایا 33 ۲؂۔یعنی بہشتیوں پر دوسری موت نہیں آئے گی۔ ایک موت جو آ چکی سو آچکی۔ اب جو لوگ کہتے ہیں کہ مسیح جو مرگیا کیا خدائے تعالیٰ قادر نہیں کہ اس کو پھر زندہ کر کے بھیجے گویا اُن کے نزدیک مسیح بہشتی نہیں جو اس کے لئے دو موتیں تجویز کرتے ہیں۔حضرات اپنی بات کی ضد کے لئے مسیح کو بار بار کیوں مارنا چاہتے ہو اس کا کونسا گناہ ہے جو اس پر دوموتیں آویں اورپھر ان دوموتوں کا حدیث اور قرآن کی رُو سے ثبوت کیا ہے۔ کچھ پیش توکرو۔ اور اگر اب بھی ہمارے مخالف الرائے مولوی صاحبان ماننے میں نہیں آتے تو ہم انہیں مخطی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 347
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 347
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/347/mode/1up
    ہونے کی وجہ سے مباہلہ کے لئے نہیں بُلاتے کیونکہ اگر اختلافات باہمی کی وجہ سے مسلمانوں کا باہم مباہلہ جائز ہو تو ا س کا نتیجہ یہ ہو کہ مسلمانوں پر عذاب نازل ہونا شروع ہوجائے اور بجُز کسی خاص فر د کے جو بکلّی خطا سے خالی ہو تمام مسلمانؔ نیست ونابو د کئے جائیں۔ سو خدائے تعالیٰ کا یہ ارادہ نہیں اس لئے صرف اختلافات کی بناء پر مباہلہ بھی جائز نہیں۔ہاں اگر ہمارے مخالف اپنے تئیں سچ پر سمجھتے ہیں اور اس بات پر سچ مچ یقینی طورپر ایمان رکھتے ہیں کہ درحقیقت وہی مسیح ابن مریم آسمان سے نازل ہوگا جس پر انجیل نازل ہوئی تھی تو اس فیصلہ کے لئے ایک یہ بھی عمدہ طریق ہے کہ وہ ایک جماعت کثیر جمع ہو کر خوب تضرّع اور عاجزی سے اپنے مسیح موہوم کے اُترنے کے لئے دعا کریں۔اس میں کچھ شک نہیں کہ جماعت صادقین کی دعا قبول ہوجاتی ہے بالخصوص ایسے صادق کہ جن میں ملہم بھی ہوں۔ پس اگر وہ سچے ہیں تو ضرور مسیح اُتر آئے گا اور وہ دعابھی ضرور کریں گے اور اگر وہ حق پر نہیں اور یادرہے کہ وہ ہرگز حق پر نہیں ہیں تو دعا بھی ہرگز نہیں کریں گے کیونکہ وہ دلوں میں یقین رکھتے ہیں کہ دعا قبول نہیں ہوگی۔ ہاں ہماری اس درخواست کو کچّے بہانوں سے ٹال دیں گے تاایسانہ ہوکہ رُسوائی اُٹھا نی پڑے۔ اور اگر کوئی کہے کہ اہل حق کی دعا اہل باطل کے مقابل پر قبول ہونی ضروری نہیں ورنہ لازم آتا ہے کہ ہندؤں کے مقابل پر مسلمانوں کی دعا قیامت کے بارہ میں قبول ہو کر ابھی قیامت آجائے۔ اسؔ کا جواب یہ ہے کہ یہ مقرر ہوچکا ہے کہ قیامت سات ہزاربرس گذرنے سے پہلے واقع نہیں ہو سکتی۔ اور ضرور ہے کہ خدااُسے روکے رہے جب تک وہ ساری علامتیں کامل طورپر ظاہر نہ ہوجائیں جو حدیثوں میں لکھی گئی ہیں۔ لیکن مسیح کے ظہورکا وقت تو یہی ہے۔جس کی نسبت اُس مولوی مرحوم نے بھی شہادت دی ہے جس کا مجدّد ہونا مولوی محمد حسین صاحب بٹالوی تصدیق کر چکے ہیں اور وہ تمام علامتیں بھی پیداہوگئی ہیں جن کا مسیح کے وقت پیدا ہوناضروری تھا۔ جیسا کہ اسی رسالہ میں ہم نے ثابت کردیا ہے۔ پھر اگر اب بھی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 348
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 348
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/348/mode/1up
    مسیح کے اُترنے کے لئے دعامنظور نہ ہو تو صاف ثابت ہوگا کہ وہ دعا تحصیل حاصل میں داخل ہے اسی وجہ سے منظور نہیں ہوئی۔
    ہمارے دوست مولوی ! ابو سعید محمد حسین صاحب اپنے ایک خط میں لکھتے ہیں کہ میں عقلی طورپر اس امر (وفاتِ مسیح ) کو ثابت کر دکھاؤں گا مگر کچھ معلوم نہیں ہوا کہ مولوی صاحب کی عقلی طورسے کیا مرادہے۔کیا بیلون میں آسمان کی طرف چڑھ کر ناظرین کو کوئی تماشہ دکھانا چاہتے ہیں۔ حضرت مولوی صاحب کو لازم ہے کہ عقلی طورکا نام نہ لیں تا نئے فلسفہ والے ان کے گرد نہ ہوجائیں بلکہ یہ کہا کریں کہ جو شخصؔ عقل کا نام لے وہ کافر ہے۔ اگر کوئی دن ایسے ہی اعتقاد کے ساتھ گذارہ کرنا ہے تو بجز تکفیر کے اور کوئی کار آمد حربہ نہیں۔ لیکن ہمارا تو اس بات پر ایمان ہے کہ خدائے تعالیٰ نے انسان کے وجود میں عقل کو بھی بیکار پیدا نہیں کیا اوراگر مسلمانوں کے دوفریق میں سے جو کسی جُزئی مسئلہ پر جھگڑتے ہیں اور باہم اختلاف رکھتے ہیں ایک فریق ایسا ہے کہ علاوہ دلائل شرعی اور نصوص قرآن اور حدیث کے عقل کو بھی اپنے ساتھ رکھتا ہے تو بلاشبہ وہی فریق سچاہے کیونکہ اس کی تائید دعویٰ کے لئے گوا ہ بہت ہیں۔سو اب دیکھنا چاہیئے کہ مسیح کی وفات کے بارے میں کیسے قرآن کریم اور حدیث اورعقل اور تجربہ ہمارا مؤید ہو رہا ہے۔لیکن ہمارے مخالفین کو اِن تمام شواہد میں سے کوئی مدد نہیں دیتا۔قرآن کریم کے سامنے جاتے ہیں تو قرآن کریم کہتا ہے کہ چل دُورہو۔ میرے خزانہ حکمت میں تیرے خیال کے لئے کوئی مؤید بات نہیں۔ پھر وہاں سے محروم ہو کر حدیثوں کی طرف آتے ہیں تو حدیثیں کہتی ہیں کہ اے سرکش قوم یکجائی نظرسے ہمیں دیکھ اورمومن ببعض اور کافر ببعض نہ ہو۔ تاتجھے معلوم ہو کہ میں قرآن کریم کے مخالف نہیں۔ پھر ؔ حدیثوں سے نومید ہو کر سلف و خلف کے اقوال متفرقہ کی طرف آتے ہیں تو اُن کو کسی ایک خاص شق پر قائم نہیں دیکھتے بلکہ تفسیروں کو رطب ویابس کا ذخیرہ پاتے ہیں اور جب دیکھنا چاہتے ہیں کہ مبسوط تفسیروں میں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 349
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 349
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/349/mode/1up
    اِنِّیْ مُتَوَفِّیْکَکے کیا معنے نکلتے ہیں تو پہلے بسم اللہ کر کے ابن عباس سے یہی حدیث نکلتی ہے کہ حضرت مسیح فوت ہوچکے ہیں۔پھر قرآن اور حدیث سے قطع امید کرکے عقل کی طرف دوڑتے ہیں تو عقل ایک روشن دلیل کا طمانچہ مار کر دوسری طرف مُنہ پھیر دیتی ہے اورپھر کانشنس اور نور قلب کی طرف آتے ہیں تو وہ اپنے نزدیک آنے سے دھکّے دیتا ہے۔ پس اس سے زیادہ محرومی کیا ہوگی کہ کوئی اِن لوگوں کو قبول نہیں کرتا اور کسی جگہ اپنے مورچے باندھ نہیں سکتے۔
    بعض چالاکی سے قرآن شریف کے کھلے کھلے ثبوت پر پردہ ڈالناچاہتے ہیں اور کہتے ہیں کہ توفّیکا لفظ لغت کی کتابوں میں کئی معنوں پر آیا ہے حالانکہ اپنے دلوں میں خوب جانتے ہیں کہ جن لفظوں کو قرآن شریف اصطلاحی طور پر بعض معانی کے لئے خاص کرلیتا ہے اور اپنے متواتر بیان سے بخوبی سمجھادیتاہے کہ فلاں معنے کے لئے اُسؔ نے فلاں لفظ خاص کررکھا ہے اس معنی سے اس لفظ کو صرف اس خیال سے پھیرنا کہ کسی لغت کی کتاب میں اس کے اَور معنے بھی آئے ہیں صریح الحاد ہے۔ مثلًا کتب لغت میں اندھیری رات کا نام بھی کافر ہے مگر تمام قرآن شریف میں کافرکالفظ صرف کافرِ دین یا کافر نعمت پر بولا گیا ہے۔اب اگر کوئی شخص کفر کا لفظ الفاظ مروّجہ فرقان سے پھیر کر اندھیری رات اس سے مراد لے اوریہ ثبوت دے کہ لغت کی کتابوں میں یہ معنے بھی لکھے ہیں تو سچ کہو کہ اُس کا یہ مُلحدانہ طریق ہے یا نہیں ؟ اسی طرح کتب لغت میں صوم کا لفظ صرف روزہ میں محدود نہیں بلکہ عیسائیوں کے گرجا کا نام بھی صوم ہے اور شترمرغ کے سرگین کو بھی صوم کہتے ہیں۔لیکن قرآن شریف کی اصطلاح میں صوم صرف روزہ کانام ہے۔ اور اسی طرح صلوٰۃ کے لفظ کے معنے بھی لغت میں کئی ہیں مگر قرآن شریف کی اصطلاح میں صرف نماز اَور درود اور دعاکا نام ہے۔ یہ بات سمجھنے والے جانتے ہیں کہ ہر یک فن ایک اصطلاح کا محتاج ہوتاہے اور اہل اس فن کے حاجات کے موافق بعض الفاظ کو متعدد معنوں سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 350
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 350
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/350/mode/1up
    مجرّد کر کے کسی ایک معنی سے مخصوص کرلیتے ہیں۔مثلًا طبابت کے فن کو دیکھئے کہ بعض الفاظ جو کئی معنے رکھتے تھے صرف ایک معنے میں اصطلاحی طور پر محصورو محدود رکھے گئے ہیں اور سچ تو یہ ہے کہ کوئی علم بغیر اصطلاحی الفاظ کے چل ہی نہیں سکتا۔ پس جو شخص الحاد کا ارادہ نہیں رکھتا اس کے لئے سیدھی راہ یہی ہے کہؔ قرآن شریف کے معنے اس کے مروّجہ اور مصطلحہ الفاظ کے لحاظ سے کرے ورنہ تفسیر بالرائے ہوگی۔
    اگر یہ کہا جائے کہ اگر تَوَفّی کے معنے الفاظ مروّجہ قرآن میں عام طور پر قبض روح ہی ہے تو پھر مفسّروں نے اس کے برخلاف اقوال کیوں لکھے۔ تو اس کا جواب یہ ہے کہ موت کے معنے بھی تو وہ برابر لکھتے چلے آئے ہیں۔اگر ایک قوم کا ان معنوں پر اجماع نہ ہوتا تو کیوں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے آج تک جو تیرہ سو برس گذر گئے یہ معنے تفسیروں میں درج ہوتے چلے آئے۔ سو اِن معنوں کا مسلسل طورپر درج ہوتے چلے آنا صریح اس بات پر دلیل ہے کہ صحابہ کے وقت سے آج تک ان معنوں پر اجماع چلا آیا ہے۔ رہی یہ بات کہ پھر دوسرے معنے انہیں تفسیروں میں کیوں لکھے گئے۔اس کاجواب یہ ہے کہ وہ بعض لوگوں کی غلط رائے ہے اور اس رائے کی غلطی ثابت کرنے کے لئے یہ کافی ہے کہ وہ رائے سراسرقرآن شریف کے منشاء کے برخلاف ہے اور نیز یہ بھی کہہ سکتے ہیں کہ اُ ن میں سے بعض وہ لوگ بھی ہیں جو خیال کرتے ہیں جو حضرت عیسیٰ تین گھنٹہ یا سات گھنٹہ یا تین دن تک مُردہؔ رہے اورپھر آسمان کی طرف زندہ کرکے اُٹھائے گئے۔اوراس رائے پر ادنیٰ نظر ڈالنے سے معلوم ہوتا ہے کہ جنہوں نے ابتداء میں یہ رائے قائم کی ہے اُن کا یہ منشاء ہو گا کہ جیسا کہ بعض حدیثوں میں آیا ہے اور مولوی عبد الحق صاحب دہلوی نے بھی اس بارے میں اپنی کتابوں میں بہت کچھ لکھاہے اور متصوّفین بھی اس کے قائل ہیں کہ جب کوئی مقدّس اور راستباز بندہ فوت ہوجائے توپھر وہ زندہ کیا جاتاہے۔اور قدرت حق سے ایک قسم کا اس کو جسم نورانی عطاہوتاہے اور وہ اس جسم کے ساتھ آسمان پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 351
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 351
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/351/mode/1up
    حسب اپنے مرتبہ کے رہائش اختیارکرتا ہے سو کیوں مسیح کے اُٹھائے جانے کا ایک نرالا مسئلہ بناویں۔ ہم قبول کرتے ہیں کہ وہ ایک نورانی جسم کے ساتھ آسمان کی طرف اٹھایاگیا جیساکہ اَور نبی اُٹھائے گئے۔ اس کو نورانی جسم دیا گیا تبھی تو وہ کھانے اورپینے اور پاخانہ اور پیشاب کرنے کا محتاج نہ ہؤا۔ اگر یہ کثیف اور خاکی جسم ہوتا تو آسمان پر اس کے لئے ایک باورچی خانہ اور ایک پاخانہ بھی چاہیئے تھا کیونکہ اس خاکی جسد کے لئے خدائے تعالیٰ نے یہ تمام ضروری امورٹھہرائے ہیں جیسا کہ قرآن شریف کی آیات بیّنات سے ظاہرہے۔
    اےؔ حضرات مولوی صاحبان جبکہ عام طورپر قرآن شریف سے مسیح کی وفات ثابت ہوتی ہے اور ابتداء سے آج تک بعض اقوال صحابہ اور مفسّرین بھی اس کو مارتے ہی چلے آئے ہیں تو اب آپ لوگ ناحق کی ضد کیوں کرتے ہیں کہیں عیسائیوں کے خداکو مرنے بھی تو دو۔ کب تک اس کو حیّ لایموت کہتے جاؤ گے کچھ انتہا ء بھی ہے پھر اگر آپ محض ضد کی راہ سے یہ کہیں کہ مسیح ابن مریم فوت تو ضرور ہوگیا تھا مگر اُسی خاکی جسم میں اُس کی روح آگئی۔ تو کیا اس کا کوئی ثبوت بھی ہے۔ ماسوا اس کے اس صورت میں دوموتیں اس کے لئے تجویز کروگے۔ یہ کہاں لکھا ہے اور کس کی ہدایت ہے کہ خدائے تعالیٰ موتت اُولٰی پر کفایت نہ کرے اورسارے جہان کے لئے ایک موت اور مسیح ناکردہ گناہ پر دوموتوں کی تکلیف نازل ہو۔ کیا کوئی حدیث ہے یا قرآن شریف کی آیت ہے جو اِن دوموتوں کے بارے میں آپ کے پاس ہے۔ یوں تو آپ حضرت مسیح کی لاش کو بڑی عزت کے ساتھ دفن کرنا چاہتے ہیں جبکہ کہتے ہیں کہ حضرت سیّدنا جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر میں دفن کئے جائیں گے لیکن یہ خیال نہیں کرتے کہ یہ دوسری موت اُن ؔ کے لئے کس سخت گناہ کا پاداش ہوگی۔ اور واضح رہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر میں اُن کا آخری زمانہ میں دفن ہونا یہ اس بات کی فرع ہے کہ پہلے اُن کا اسی جسم خاکی کے ساتھ زندہ اُٹھایاجانا ثابت ہو۔ورنہ فرض کے طور پر اگر اس حدیث کوجو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 352
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 352
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/352/mode/1up
    نصوص بیّنہ کے مخالف صریح پڑی ہوئی ہے صحیح بھی مان لیں اور اس کے معنے کو ظاہر پر ہی حمل کریں تو ممکن ہے کہ کوئی مثیل مسیح ایسا بھی ہوجو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہ کے پاس مدفون ہو۔ کیونکہ اس حدیث کی رو سے کہ جو علماء امّتی کا نبیاء بنی اسرائیل ہے مثیلوں کی کمی نہیں اور ایساہی یہ آیت کریمہ بھی مثیلوں کی طرف اشارہ کر رہی ہے 33۔3 ۱؂ اور نیز قرائن قویہ کی وجہ سے بفرض صحت اس کو ایک استعارہ تسلیم کر کے یہ معنے بھی ہوسکتے ہیں کہ یہ ایک اشارہ معیّت اور اتحاد کی طرف ہے۔ مثلًا جو دشمن ہو اس کے لئے انسان کہتاہے کہ اس کی قبر بھی میرے نزدیک نہ ہو۔ لیکن دوست کے لئے قبرکا بھی ساتھ چاہتا ہے اور مکاشفات میں اکثر ایسے امور دیکھے جاتے ہیں۔ ایک مدّت کی بات ہے جو اس عاجز نے خواب میں دیکھا جو آؔ نحضرتْ صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہ مبارکہ پر میں کھڑاہوں اورکئی لوگ مر گئے ہیں یا مقتول ہیں ان کو لوگ دفن کرنا چاہتے ہیں۔اِسی عرصہ میں روضہ کے اندر سے ایک آدمی نکلا اور اس کے ہاتھ میں ایک سرکنڈہ تھا اور وہ اس سرکنڈہ کو زمین پر مارتا تھا اور ہریک کو کہتا تھا کہ تیری اس جگہ قبر ہوگی۔ تب وہ یہی کام کرتا کرتا میرے نزدیک آیا اور مجھ کو دکھلا کر اور میرے سامنے کھڑا ہو کر روضۂ شریفہ کے پاس کی زمین پر اس نے اپنا سرکنڈہ مارا اور کہاکہ تیری اس جگہ قبر ہوگی۔ تب آنکھ کھل گئی اور میں نے اجتہاد سے اس کی یہ تاویل کی کہ یہ معیّت معادی کی طرف اشارہ ہے۔ کیونکہ جو شخص فوت ہونے کے بعد روحانی طورپر کسی مقدّس کے قریب ہوجائے تو گویا اس کی قبر اس مقدس کی قبر کے قریب ہو گئی۔ وَاللّٰہُ اَعْلَمُ وَعِلْمُہٗ اَحْکَمُ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 353
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 353
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/353/mode/1up
    نورؔ افشاں مطبُوعہ ۲۳ ؍ اپریل کا اعتراض
    پرچہ نور افشان میں مسیح کے صعود کی نسبت یہ دلیل پیش کی گئی ہے کہ مسیح کے صعود کی نسبت گیارہ شاگرد بچشم دید گواہ موجود ہیں جنہوں نے اُسے آسمان کو جہاں تک حد نظر ہے جاتے دیکھا۔ چنانچہ معترض صاحب نے اپنے دعوے کی تائیدمیں رسولوں کے اعمال باب اوّل کی یہ آیتیں پیش کی ہیں ۔
    (۳) اُن پر (یعنی اپنے گیارہ شاگردوں پر )اُس نے (یعنی مسیح نے ) اپنے مرنے کے پیچھے آپ کو بہت سی قوی دلیلوں سے زندہ ثابت کیا کہ وہ چالیس دن تک انہیں نظر آتا رہا اور خداکی بادشاہت کی باتیں کہتا رہا۔ اور اُن کے ساتھ ایک جا ہوکے حکم دیا کہ یروشلم سے باہر نہ جاؤ...اورؔ وہ یہ کہہ کے اُن کے دیکھتے ہوئے اُوپر اُٹھایا گیا اور بدلی نے اُن کی نظروں سے چھپا لیا۔ اور اس کے جاتے ہوئے جب وے آسمان کی طرف تک رہے تھے دیکھو دو مرد سفید پوشاک پہنے ہوئے اُن کے پاس کھڑے تھے (۱۱) اور کہنے لگے اے جلیلی مردو تم کیوں کھڑے آسمان کی طرف دیکھتے ہو یہی یسوع جو تمہارے پاس سے آسمان پر اُٹھایا گیا ہے اُسی طرح جس طرح تم نے اسے آسمان کو جاتے دیکھا پھر آوے گا۔
    اب پادری صاحب صرف اس عبارت پر خوش ہوکر سمجھ بیٹھے ہیں کہ درحقیقت اِسی جسم خاکی کے ساتھ مسیح اپنے مرنے کے بعد آسمان کی طرف اُٹھایا گیا۔ لیکن انہیں معلوم ہے کہ یہ بیان لوقاکا ہے جس نے نہ مسیح کودیکھا اور نہ اُس کے شاگردوں سے کچھ سُنا۔ پھر ایسے شخص کا بیان کیوں کر قابل اعتبار ہوسکتا ہے جو شہادت رویت نہیں اور نہ کسی دیکھنے والے کے نام کا اُس میں حوالہ ہے۔ ماسوا اس کے یہ بیان سراسر غلط فہمی سے بھرا ہوا ہے۔ یہ تو سچ ہے کہ مسیح اپنے وطن گلیل میں جا کر فوت ہوگیا۔ لیکن یہ ہرگز سچ نہیں کہ وہی جسم جو دفن ہوچکا تھا پھر زندہ ہوگیا۔ بلکہ اسی باب کی تیسری آیت ظاہر کررہی ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 354
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 354
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/354/mode/1up
    کہ بعد فوت ہوجانے کے کشفی طورپر مسیح چالیس دن تک اپنے شاگردوں کو نظر آتا رہا۔اس جگہ کوئی یہ نہ سمجھ لیوے کہ مسیح بوجہ مصلوب ہونے کے فوت ہوا۔کیونکہ ہم ثابت کرآئے ہیں کہ خدائے تعالیٰ نے صلیب سے مسیح کی جان بچائی تھی بلکہ یہ تیسری آیت باب اول اعمال کی مسیح کی طبعی موت کیؔ نسبت گواہی دے رہی ہے جو گلیل میں اس کو پیش آئی۔ اس موت کے بعد مسیح چالیس دن تک کشفی طورپر اپنے شاگردوں کو نظرآتا رہا۔ جو لوگ کشف کی حقیقت کو نہیں سمجھتے وہ ایسے مقامات میں بڑا دھوکہ کھاتے ہیں۔ اِسی وجہ سے حال کے عیسائی بھی جو روحانی روشنی سے بے بہرہ ہیں اس عالم کشف کو درحقیقت عالم جسمانی سمجھ بیٹھے ہیں۔ اصل بات یہ ہے کہ مقدّس اور راستباز لوگ مرنے کے بعد پھر زندہ ہوجایا کرتے ہیں اوراکثر صاف باطن اور پُرمحبت لوگوں کو عالمِ کشف میں جو بعینہٖ عالم بیداری ہے نظر آجایا کرتے ہیں۔ چنانچہ اس بارہ میں خود یہ عاجز صاحبِ تجربہ ہے۔ بارہا عالم بیداری میں بعض مقدّس لوگ نظر آئے ہیں۔ اور بعض مراتب کشف کے ایسے ہیں کہ میں کسی طور سے کہہ نہیں سکتا۔کہ اُن میں کوئی حصہ غنودگی یاخواب یا غفلت کا ہے بلکہ پورے طورپر بیداری ہوتی ہے اور بیداری میں گذشتہ لوگوں سے ملاقات ہوتی ہے اور باتیں بھی ہوتی ہیں۔ یہی حال حواریوں کی رویت کا ہے جو انہیں کشفی طور پر مسیح ابن مریم مرنے کے بعد جبکہ وہ جلیل میں جا کر کچھ عرصہ کے بعد فوت ہوگیا چالیس دن برابر نظرآتا رہااور انہوں نے اس کشفی حالت میں صرف مسیح کوؔ نہیں دیکھا بلکہ دوفرشتے بھی دیکھے جو سفید پوشاک پہنے ہوئے کھڑے تھے۔ جس سے اور زیادہ ثابت ہوتاہے کہ وہ کشف کا ہی عالم تھا۔ انجیل میں یہ بھی آیا ہے کہ ایک مرتبہ انہوں نے کشفی طور پر حضرت موسیٰ اور حضرت یحییٰ کوبھی خواب میں دیکھا تھا۔ غرض اعلیٰ درجہ کا کشف بعینہٖ عالم بیداری ہوتاہے اور اگر کسی کو اس کوچہ میں کچھ دخل ہو تو ہم بڑی آسانی سے اس کو تسلیم کرا سکتے ہیں مگر محض بیگانوں اور بے خبروں کے مقابل پر کیا کیا جائے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 355
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 355
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/355/mode/1up
    میں کئی بار لکھ چکا ہوں اورپھر بھی لکھتا ہوں کہ اہل کشف کے نزدیک یہ بات ثابت شدہ ہے کہ مقدّس اور راستباز لوگ مرنے کے بعد پھر زندہ ہوجایا کرتے ہیں اور ایک قسم کاانہیں جسم نورانی مل جاتاہے اور اس جسم کے ساتھ وہ آسمان کی طرف اُٹھائے جاتے ہیں اور بعض احادیث میں آیاہے کہ بعد موت کے اکثر مدّت مقدس لوگوں کی زمین پر رہنے کی چالیس دن ہے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ کوئی نبی فوت ہونے کے بعد چالیس دن سے زیادہ زمین پر نہیں ٹھہرتا بلکہ اس عرصہ کے اندراندر آسمان کی طرف اُٹھایا جاتاہے۔ چنانچہ خوداپنی نسبت آنجنابؐ فرماؔ تے ہیں کہ مجھے ہرگز امید نہیں کہ خدائے تعالیٰ چالیس دن سے زیادہ مجھ کو قبر میں رکھے۔سو سمجھنا چاہیئے کہ آسمان کی طرف مع الجسد اُٹھایا جانا حضرت مسیح کا جس کی نسبت کیا عیسائی اور کیا مسلمان شور مچا رہے ہیں دراصل یہی معنے رکھتاہے اور اس بارے میں مسیح کی کچھ بھی خصوصیت نہیں ہر یک مقدس اور کامل راستباز کا رفع اسی طرح ہوتا ہے۔اور یہ امر اہل کشف کے نزدیک مسلّمات اور مشاہدات میں سے ہے قرآن کریم میں مسیح کے رفع کا ذکر اس کی راستبازی کی تصدیق کے لئے ہے۔اور مسیح کے شاگردوں کو جو کشفی طورپر اس کا اُٹھایا جانا دکھایاگیا یہ اُن کی تقویتِ ایمان کے لئے تھا۔ کیونکہ اس وقت کے مولویوں اورفقیہوں کی طرح اس وقت کے فقیہوں اورفریسیوں نے بھی حضرت مسیح پر کفرکا فتویٰ لگایا تھا اور قریب تھا کہ وہ لوگ اپنی مکاریوں سے بہت سے شبہات دلوں میں ڈال دیتے لہذا خداوندکریم نے مسیح کے شاگردوں کی کشفی آنکھ کھول دی اور انہوں نے دیکھا کہ وہ خاص مقرّبوں کی طرح آسمان کی طرف اُٹھایا گیا۔ اگر یہ کشف نہ ہوتا تو نامحرم اور بدعقیدہ بیگانہ لوگ بھی اس حالت کودیکھتے کیونکہ وہ کوئی ایسی جگہ نہیں تھی کہ جہاں دوسروں کیؔ آمدورفت حرام تھی۔ پس بیگانے لوگ جو آیندروند تھے صرف اسی وجہ سے نہیں دیکھ سکے کہ وہ ایک کشفی امر تھااور پھر اخیر میں گیارہ آیت میں جو لکھا ہے جو فرشتوں نے جو وہاں کھڑے تھے یہ کہا کہ اے گلیلی مردو! یہی یسوع جو تمہارے پاس سے آسمان پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 356
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 356
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/356/mode/1up
    اُٹھایاگیا ہے اسی طرح جس طرح تم نے اُسے آسمان کوجاتے دیکھا پھرآوے گا یہ ایک لطیف اشارہ اس بات کی طرف ہے جو تم نے عالم کشف میں جو عالم مثال ہے مسیح کو آسمان کی طرف جاتے دیکھا اسی طرح مثالی طور پر اور مثالی وجود کے ساتھ مسیح پھر آوے گا جیساکہ ایلیا آیا اور یاد رہے کہ یہ تاویلات اس حالت میں ہیں کہ ہم ان عبارتوں کو صحیح اور غیر محرف قبول کرلیں۔ لیکن اس کے قبول کرنے میں بڑی دقتیں ہیں۔ جاننے والے خوب جانتے ہیں کہ مسیح کا آسمان کی طرف اُٹھائے جانا انجیل کی کسی الہامی عبارت سے ہرگز ہرگزثابت نہیں ہوسکتا اور جنہوں نے اپنی اٹکل سے بغیر رویت کے کچھ لکھا۔اُن کے بیانات میں علاوہ اس خرابی کے کہ اُن کا بیان چشم دید نہیں اس قدر تعارض ہے کہ ایک ذرّہ ہم اُن میں سے شہادت کے طورپر نہیں لے سکتے۔
    ضروؔ ر تھا کہ مسیح دجّال گرجا میں سے ہی نکلے
    ہم بیان کرآئے ہیں کہ مسیح دجّال کی تعیین و تشخیص میں اسلام کے قرن اوّل کے بزرگوں میں اختلاف رہا ہے۔ بعض صحابہ رضی اللہ عنہم قطعی اور یقینی طورپر ابن صیّاد کو مسیح دجّال سمجھ بیٹھے تھے۔ چنانچہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے رُوبرو قسم کھا کر کہا کہ الدجّال یہی ہے یعنی مسیح دجّال۔ کیونکہ الدجّال بجُز مسیح دجّال کے اور کسی کو نہیں کہاجاتا۔ ایسا ہی ابن عمرؓ نے بھی صریح لفظوں میں کہا کہ مسیح الدجّال یہی ہے۔ اور ہم پہلے اس سے تحریر کر چکے ہیں کہ بعض احادیث سے ثابت ہوتاہے کہ ابن صیّاد مسلمان ہونے کے بعد مدینہ میں فوت ہوگیااورمسلمانوں نے اس کا جنازہ پڑھا۔ بعض یہ کہتے ہیں کہ وہ گم ہوگیا مگر قول اوّل ارجح ہے کیونکہ فوت کی خبر میں زیادت علم ہے جوموجب قطع ویقین ہے۔ بہرحال جبکہ مسلم کی حدیث سے ابن صیّاد کااسلام ثابت ہے اور ارتداد
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 357
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 357
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/357/mode/1up
    ثابت نہیں تو خواہ نخواہ ایک مسلمان کے پیچھے پڑنااورؔ اس کو دجّال دجّال کرکے پکارنا اور پھر اس کی نسبت یہ یقین رکھنا کہ وہی ابن صیّاد یہودی الاصل آخری زمانہ میں پھر کفرکا جامہ پہن کر اور خدائی کا دعویٰ کرکے خروج کرے گا۔ میرے نزدیک بالکل نامناسب اور ایک مسلمان بھائی کی ناحق کی غیبت اور بدگوئی ہے جو آیت کریمہ 333 ۱؂ کے تحت میں داخل ہے۔ علاوہ اس کے ابن صیّاد سے اس کی کفر کی حالت میں بھی کوئی ایسا کام فتنہ اور شرارت کا صادر نہیں ہوا۔جس سے وہ اپنے وقت میں فتنہ انگیزی میں بے نظیر سمجھاگیاہو۔ پھر جب اس کے دل میں لاالٰہ الّا اللّٰہ کانور داخل ہوگیا اور تصدیق رسالت نبوی سے اس کا سینہ منوّر کیاگیا تو پھر شک کرنے کی کوئی وجہ بھی باقی نہ رہی۔ بے شک وہ حدیثیں نہایت حیرت انگیز ہیں جن میں یقین کے طورپر بیان کیاگیا ہے کہ مسیح دجّال یہی شخص ہے۔ اور اب ہم اُن کی کوئی تاویل نہیں کرسکتے بجز اس کے کہ یہ کہیں کہ جو آخری زمانہ میں دجّال پیداہونے کی خبر دی گئی ہے اس دجّال میں بعض صفات ابن صیّاد کی بھی ہوں گی اور کفر کی حالت میں جو کچھ مکر وفریب کی ابن صیّاد کو مشق تھی۔اورجو سیرت غفلت اور دلیری اوردھوکہ دہی اس میں موجود تھیؔ وہی صفتیں اور خصلتیں اس آنے والے دجّال میں بھی ہوں گی گویا وہ اس کا مثیل ہوگا اور اس کے کفر کی حالت کا رنگ اس میں پایا جائے گا۔
    لیکن گرجا سے نکلنے والا دجّال جس کے بارے میں امام مُسلم نے اپنی صحیح میں فاطمہ بنت قیس سے روایت کی ہے اورجس کو نہایت درجہ کا قوی ہیکل اور زنجیروں سے جکڑاہوا بیان کیا ہے اور اس کے ایک جساسہ کی بھی خبر لکھی ہے۔اوریہ دجّال وہ ہے جس کو تمیم داری نے کسی جزیرہ کے ایک گرجا میں دیکھا کہ خوب مضبوط بندھاہوا تھا اور اس کے ہاتھ اس کی گردن کی طرف جکڑے ہوئے تھے اس دجّال پر علماء کی بہت نظر ہے کہ درحقیقت یہی دجّال ہے جو آخری زمانہ میں نکلے گا۔ اوریہ تو کسی کا بھی مذہب نہیں
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 358
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 358
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/358/mode/1up
    کہ آخری زمانہ میں دجّال تولّد کے طورپر کسی عورت کے پیٹ سے پیداہوگا بلکہ بالاتفاق سلف وخلف یہی کہتے آئے ہیں کہ دجّال معہود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں موجود تھااور پھر آخری زمانہ میں بڑی قوت کے ساتھ خروج کرے گا۔اور اب تک وہ زندہ کسی جزیرہ میں موجود ہے۔مگر یہ خیال کہ اب تک وہ زندہ ہے ہرگز صحیح نہیں ہے۔مسلم کی دو حدیثیں مفصلہ ذیل اس خیالؔ کی بکلّی استیصال کرتی ہیں اور وہ یہ ہیں:۔
    (۱)عن جابر قال سمعت النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم قبل ان یموت بشھر تسئلونی عن الساعۃ وانما علمھا عنداللّٰہ واقسم باللہ ماعلی الارض من نفس منفوسۃ یاتی علیھا ماءۃ سنۃ وھی حیۃ یومئذٍ رواہ مسلم یعنی روایت ہے جابر سے کہ کہا سُنا میں نے پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم سے فرماتے تھے مہینہ بھر پہلے اپنی وفات سے جو تکمیل مقاصدِ دین اور اظہار بقایا اسرار کا وقت تھاکہ تم مجھ سے پوچھتے ہوکہ قیامت کب آئے گی اور بجُز خدائے تعالیٰ کے کسی کو اس کا علم نہیں اور میں اللہ تعالیٰ کی قسم کھاتا ہوں کہ روئے زمین پر کوئی ایسا نفس نہیں جو پیدا ہوگیاہو اورموجود ہو اور پھر آج سے سو برس اس پر گذرے اور وہ زندہ رہے۔
    (۲) پھر دوسری حدیث صحیح مسلم کی یہ ہے وعن ابی سعید عن النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم لایاتی ماءۃ سنۃ وعلی الارض نفس منفوسۃ رواہ مسلم یعنی ابو سعید سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ نہیں آویگی سو برس اس حال میں کہ زمین پرکوئی شخص بھی آج کے لوگوں میں سے زندہ موجود ہو۔
    ابؔ اِن دونوں حدیثوں کی رو سے جن میں سے ایک میں ہمارے سیدو مولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے قسم بھی کھائی ہے اگرہم تکلفات سے تاویلیں نہ کریں تو صاف طورپر ثابت ہوتاہے کہ جسّاسہ والادجّال بھی ابن صیّاد کی طرح فوت ہوگیا ہے۔اسی کی نسبت علماء کا خیال ہے کہ آخری زمانہ میں نکلے گا اور حال یہ ہے کہ اگر اس کو آج تک زندہ فرض کیاجائے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 359
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 359
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/359/mode/1up
    تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حتمی حدیثوں کی تکذیب لازم آتی ہے اور اس حدیث میں دجّال کا یہ قول انی انا المسیح وانی ان یوشک ان یوذن لی فی الخروج جو زیادہ تر اس کے مسیح دجّال ہونے پر دلالت کرتا ہے بظاہر اس شبہ میں ڈالتا ہے کہ آخری زمانہ میں وہ نکلنے والاہے۔لیکن بہت آسانی سے یہ شبہ رفع ہوسکتا ہے جبکہ اس طرح پر سمجھ لیں کہ یہ عیسائی دجّال بطور مورث اعلیٰ کے اس دجّال کے لئے ہے جوعیسائی گروہ میں ہی پیداہوگااور گرجا میں سے ہی نکلے گا۔اور ظاہر ہے کہ وارث اور موروث کاوجود ایک ہی حکم رکھتا ہے اور ممکن ہے کہ اس بیان میں استعارات ہوں اورزنجیروں سے مراد وہ موانع ہوں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں عیسائی واعظوں کو روک رہے تھے اور وہ مجبورہوکر گویا ایک جگہ بند تھے۔ اورؔ یہ اشارہ ہوکہ آخری زمانہ میں بڑی قوت کے ساتھ ان کا خروج ہوگا جیسا کہ آج کل ہے۔ اس جگہ یہ بھی یادرہے کہ حدیث مذکورہ بالا میں اس دجا ل نے خدائی کا دعوےٰ نہیں کیا بلکہ فقرہ وانی یوشک ان یوذن لی صاف دلالت کررہا ہے کہ دجّال کو خدائے تعالیٰ کے وجود کا اقرارہے۔اور حدیثوں میں کوئی ایسالفظ پایا نہیں جاتا جس سے معلوم ہوکہ جساسہ والا دجّال اپنے آخری ظہورکے وقت میں بالجہر خالق السمٰوٰت والارض ہونے کا دعویٰ کرے گا۔ لیکن معلوم ہوتاہے کہ تکبّرکی راہ سے خداوند خداوند کہلائے گا جیسے اُن لوگوں کا طریقہ ہوتا ہے جو خدائے تعالیٰ کو بکلّی فراموش کردیتے ہیں اور اس کی پرستش اور اطاعت سے کچھ غرض نہیں رکھتے اور چاہتے ہیں کہ لوگ ان کو ربّی ربّی کہیں یعنی خداوند خداوند کرکے پکاریں اورایسی اُن کی اطاعت کریں جیسی خدائے تعالیٰ کی کرنی چاہیئے۔ اوریہی بدمعاشی اور غفلت کا اعلیٰ درجہ ہے کہ خدائے تعالیٰ کی تحقیر دل میں بیٹھ جائے۔ مثلًا ایک ایسا امیر ہے کہ نماز پڑھنے سے منع کرتا ہے کہ واہیات کام ہے اس سے کیا فائدہ۔اورروزہ پر ٹھٹھا کرتاہے۔اورخدائے تعالیٰ کی عظمت کو کچھ بھی چیز نہیں سمجھتا اور اس کی آسمانی تقدیروں کا قائل نہیں بلکہ اپنی تدبیروں اور مکروؔ ں کو تمام کامیابیوں کا مدار سمجھتاہے اور چاہتاہے کہ لوگ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 360
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 360
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/360/mode/1up
    ایسے اُس کے آگے جھکیں جیسے خدائے تعالیٰ کے آگے جھکنا چاہیئے اور خدائے تعالیٰ کی فرمانبردای پر چڑتا ہے اور اس کے احکام کو ذلیل اور خوار سمجھتا ہے اوراپنے احکام کو قابل عزت خیال کرتاہے اور اپنی اطاعت کو خدائے تعالیٰ کی اطاعت پر مقدّم رکھناچاہتاہے وہ حقیقت میں خدائی کادعویٰ کررہا ہے۔اگرچہ قال سے نہیں مگر حال سے ضرور یہ دعویٰ اُس سے صادر ہوتاہے بلکہ قال سے بھی دعویٰ کرتاہے کیونکہ چاہتاہے کہ لوگ اس کو خداوند خداوند کہیں۔ سو اسی قسم کا دجّال کا دعویٰ معلوم ہوتا ہے۔
    اس تمام تقریر سے معلوم ہوا کہ مسیح ابن مریم کے مثیل کی طرح دجّال کا بھی مثیل ہی آنے والاہے یعنی ایسا گروہ جو باعتبار اپنی سیرت و خاصیت کے پہلے دجّال کا ہمرنگ ہو۔ لیکن اس طرز تقریر کے اختیار کرنے میں کہ مثیل مسیح اُترے گا اور مثیل دجّال خروج کرے گا یہ حکمت ہے تا ظاہرکیاجائے کہ دجّال کا آنا بطور بلا وابتلا کے ہو گا اور مسیح کا آنا بطور ایسی نعمت کے جو بارادۂ خاص الٰہی مومنوں کی نصرت کے لئے نازل ہوتی ہے جیساؔ کہ قرآن شریف میں ہے کہ ہم نے تمہارے لئے لوہا اُتارا اور تمہارے لئے مویشی اُتارے یعنی تمہارے فائدہ کے لئے بطور رحمت یہ چیزیں پیدا کیں۔اور یہ بھی ہے کہ جو چیز زمین سے نکلتی ہے وہ ظلمت اور کثافت رکھتی ہے اور جو اُوپر سے آتی ہے اس کے ساتھ نور و برکت ہوتی ہے اور نیز اُوپر سے آنے والی نیچے والی پر غالب ہوتی ہے۔ غرض جو شخص آسمانی برکتیں اور آسمانی نور ساتھ رکھتاہے اُس کے آنے کے لئے نزول کا لفظ مناسب حال ہے اور جس کے وجود میں زمینی ظلمت اور خبث اورکدورت بھری ہوئی ہے اس کے ظہور کے لئے خروج کا لفظ مناسبت رکھتاہے۔ کیونکہ نورانی چیزیں آسمان سے ہی نازل ہوتی ہیں جو ظلمت پر فتح پاتی ہیں۔ اب اس تحقیق سے ظاہر ہو گیا کہ جیسے مثیل مسیح کو مسیح ابن مریم کہا گیا اس امر کو نظر میں رکھ کر کہ اس نے مسیح ابن مریم کی روحانیت کو لیا اور مسیح کے وجود کو باطنی طور پر قائم کیا۔ایسا ہی وہ دجّال جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں فوت ہوچکاہے اس کی ظل اور مثال نے اِس
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 361
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 361
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/361/mode/1up
    آخری زمانہ میں اس کی جگہ لی اور گرجا سے نکل کر مشارق ومغارب میں پھیل گیا اس تقریر سے مثیلیت کا محاورہ اور بھی ثابت ہوتاہے۔ جو دونوں طور کے مسیحوںؔ طیّب و خبیث میں دائر وسائر ہے۔ اگر یہ کہاجائے کہ حدیثوں میں تو صرف اتنا لفظ آیا ہے کہ مسیح ابن مریم اُترے گا اور دجّال خروج کرے گا پھر ان دونوں کے ساتھ مثیل کالفظ کیوں ملایا جاتاہے۔کیا یہ الحاد نہیں ہے؟ تو اس کا جواب یہ ہے کہ بعد اس کے کہ ہم نصوص قطعیہ بیّنہ سے ثابت کرچکے ہیں کہ حضرت مسیح ابن مریم جن پر انجیل نازل ہوئی تھی وفات پا چکے ہیں اور ایسا ہی دجّال بھی فوت ہوچکا۔اور اُن کے زندہ ہونے کاکوئی ذکر قرآن کریم اوراحادیث میں موجود نہیں۔ بلکہ آیات بیّنہ اُن کے دنیا میں واپس آنے سے سخت انکار کرتی ہیں۔ تو اس صورت میں اگرہم آنے والے مسیح اور دجّال سے اُن کے مثیل مراد نہ لیں تو اورکیاکریں۔ہاں اگر حدیثوں میں یہ لفظ وارد ہوتے کہ وہ مسیح ابن مریم جو فوت ہوچکا ہے جس پر انجیل نازل ہوئی تھی اور وہ دجّال جو جزیرہ میں مقیّد تھا جس کے ساتھ جساسہ تھے وہی دونوں زندہ ہو کر آخری زمانہ میں آجائیں گے تو پھر تاویل کی گنجائش نہ ہوتی۔ مگر اب تاویل نہ صرف جائز بلکہ واجب ہے اور چونکہ بحکم علماء امّتی کانبیاء بنی اسرائیل ابن مریم کے نام پر کوئی آنا چاہیئے تھا اور آنا بھی وہ چاہیئے تھا جو درحقیقت اُمّتی ہو نہ کہ حقیقی طور پر نبی۔ لہٰذا یہ ضروری تھا کہ ابن مریم کی جگہ کوئی ایسا اُمتی ظاہر ہو جو خدائے تعالیٰ کے نزدیک ابن مریم کے رنگ میں ہے۔ سو خدائے تعالیٰ نے مسیح ابن مریم کامثیل عین وقت میں بھیج کر اُسی مثیل کی معرفت مسیح ابن مریمؔ کا فی الواقعہ فوت ہوجانا ظاہر کردیااورسب دلائل اس کے کھول دئے۔ اگر خدانخواستہ سچ مچ فرقان کریم میں لکھا ہوتا کہ مسیح برخلاف اس سُنّت اللہ کے جو تمام بنی آدم کے لئے جاری ہے زندہ آسمان کی طرف اُٹھایا گیااور قیامت کے قریب تک زندہ ہی رہے گا تو عیسائیوں کو بڑے بڑے سامان بہکانے کے ہاتھ آجاتے۔ سو بہت ہی خوب ہوا کہ عیسائیوں کاخدا فوت ہوگیا اور یہ حملہ ایک برچھی کے حملہ سے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 362
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 362
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/362/mode/1up
    کم نہیں جو اس عاجزنے خدائے تعالیٰ کی طرف سے مسیح ابن مریم کے رنگ میں ہو کر اِن دجّال سیرت لوگوں پر کیا ہے جن کو پاک چیزیں دی گئی تھیں مگر انہوں نے ساتھ اس کے پلید چیزیں ملادیں اور وہ کام کیا جو دجّال کو کرنا چاہیئے تھا۔
    ابؔ یہ سوال بھی قابل حل ہے کہ مسیح ابن مریم تو دجّال کے لئے آئے گا آپ اگر مسیح ابن مریم کے رنگ میں ہو کر آئے ہیں تو آپ کے مقابل پر دجّال کون ہے ؟ اس سوال کا جواب میری طرف سے یہ ہے کہ گو میں اس بات کو تومانتا ہوں کہ ممکن ہے کہ میرے بعد کوئی اور مسیح ابن مریم بھی آوے اور بعض احایث کی رو سے وہ موعود بھی ہو اور کوئی ایسا دجّال بھی آوے جو مسلمانوں میں فتنہ ڈالے۔ مگر میرا مذہب یہ ہے کہ اس زمانہ کے پادریوں کی مانند کوئی اب تک دجّال پیدا نہیں ہوا اورنہ قیامت تک پیداہوگا۔ مسلم کی حدیث میں ہے وعن عمران بن حصین قال سمعت رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم یقول ما بین خلق اٰدم الیٰ قیام الساعۃ امر اکبر من الدجّال یعنی عمران ابن حصین سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ پیدائش آدم سے قیامت تک کوئی امر فتنہ اور ابتلاء کے روسے دجّال کے وجود سے بڑھ کر نہیں۔اب اوّل تو یادرکھنا چاہیئے کہ لغت میں دجّال جھوٹوں کے گروہ کو کہتے ہیں جو باطل کو حق کے ساتھ مخلوط کردیتے ہیں اور خلق اللہ کے گمراہؔ کرنے کے لئے مکر اور تلبیس کو کام میں لاتے ہیں۔اب میں دعویٰ کے ساتھ کہتا ہوں کہ مطابق منشاء مسلم کی حدیث کے جو ابھی میں بیان کرآیا ہوں اگر ہم حضرت آدم کی پیدائش سے آج تک بذریعہ ان تما م تحریری و سائل کے جو ہمیں ملے ہیں دنیا کے تمام ایسے لوگوں کی حالت پر نظر ڈالیں جنہوں نے دجالیت کا اپنے ذمہ کام لیا تھا تو اس زمانہ کے پادریوں کی دجّالیت کی نظیر ہرگز ہم کو نہیں ملے گی۔انہوں نے ایک موہومی اورفرضی مسیح اپنی نظر کے سامنے رکھا ہوا ہے جوبقول اُن کے زند ہ ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 363
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 363
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/363/mode/1up
    اور خدائی کا دعویٰ کررہا ہے۔ سو حضرت مسیح ابن مریم نے خدائی کا دعویٰ ہرگز نہیں کیا۔ یہ لوگ خود اس کی طرف سے وکیل بن کر خدائی کا دعویٰ کررہے ہیں اور اس دعویٰ کے سرسبز کرنے کے لئے کیا کچھ انہوں نے تحریفیں نہیں کیں۔اور کیا کچھ تلبیس کے کام استعمال میں نہیں لائے اور مکہ اور مدینہ چھوڑ کر اَور کونسی جگہ ہے جہاں یہ لوگ نہیں پہنچے۔ کیا کوئی دھوکہ دینے کاکام یا گمراہ کرنے کامنصوبہ یا بہکانے کاکوئی طریقہ ایسا بھی ہے جو اُن سے ظہور میں نہیں آیا۔ کیا یہ سچ نہیں کہ یہ لوگ اپنے دجّالانہ منصوبوں کی وجہ سے ایک عالم پردائرہ کی طرح محیط ہوگئے ہیںؔ ۔ جہاں یہ لوگ جائیں اورجہاں اپنا مشن قائم کریں ایک عالم کو تہ وبالا کردیتے ہیں۔ دولتمند اس قدر ہیں کہ گویا دنیا کے تمام خزانے اُن کے ساتھ ساتھ پھرتے ہیں اگرچہ گورنمنٹ انگریزی کو مذاہب سے کچھ سروکار نہیں اپنے شاہانہ انتظام سے مطلب ہے مگر درحقیقت پادری صاحبوں کی بھی ایک الگ گورنمنٹ ہے جو بے شمار روپے کی مالک اورگویا تمام دنیا میں اپنا تاروپود پھیلا رہی ہے اور ایک قسم کا جنت اور جہنّم اپنے ساتھ ساتھ لئے پھرتے ہیں۔جوشخص اُن کے مذہب میں آنا چاہتاہے اس کو وہ جنت دکھلایاجاتاہے اورجو شخص اُ ن کا اشدّ مخالف ہوجائے اس کے لئے جہنم کی دھمکی ہے۔ ان کے گھرمیں روٹیاں بہت ہیں گویا ایک پہاڑ روٹیوں کا جس جگہ رہیں ساتھ رہتا ہے۔اور اکثر شکم بندہ لوگ اُن کی سفید سفید روٹیوں پر مفتون ہو کر ربنا المسیحکہنا شروع کردیتے ہیں۔ مسیح دجّال کی کوئی بھی ایسی علامت نہیں جو اُن میں نہ پائی جائے۔ ایک وجہ سے یہ مُردوں کو بھی زندہ کرتے ہیں اور زندوں کو مارتے ہیں (سمجھنے والا سمجھ لے) اوراس میں تو شک نہیں کہ اُن کی آنکھ ایک ہی ہے جو بائیں ہے اگر اُنؔ کی دائیں آنکھ موجود ہوتی تو یہ لوگ خدائے تعالیٰ سے ڈرتے اور خدائی کے دعوے سے باز آتے۔ بے شک یہ بھی سچ ہے کہ پہلی کتابوں میں اس قوم دجال کا ذکر ہے حضرت مسیح ابن مریم نے بھی انجیل میں بہت ذکر کیا ہے پہلے صحیفوں میں بھی جابجا ان کا ذکر پایاجاتا ہے۔ بلاشبہ ایسا ہی چاہیئے تھا کہ ہر یک نبی اس مسیح دجّال کے آنے کی پہلے سے خبر دیتا۔سو ہریک نے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 364
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 364
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/364/mode/1up
    تصریحًا یااجمالًا، اشارتًا یا کنایتًا خبر دی ہے۔ حضرت نوح سے لے کر ہمارے سیّد ومولیٰ خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کے عہدمبارک تک اس مسیح دجّال کی خبر موجود ہے جس کو میں دلائل کے ساتھ ثابت کرسکتاہوں۔
    اور جس قدر اسلام کو اِن لوگوں کے ہاتھ سے ضرر پہنچا ہے اور جس قدر انہوں نے سچائی اور انصاف کاخون کیا ہے اِن تمام خرابیوں کا کون اندازہ کرسکتاہے۔ہجرت مقدّسہ کی تیرھویں صدی سے پہلے ان تمام فتنوں کا نام و نشان نہ تھا اور جب تیرھویں صدی کچھ نصف سے زیادہ گذر گئی تو یکدفعہ اس دجّالی گروہ کا خروج ہوا اور پھر ترقی ہوتی گئی یہاں تک کہ اس صدی کے اواخر میں بقول پادری ہیکر صاحب پانچؔ لاکھ تک صرف ہندوستان میں ہی کرسٹان شدہ لوگوں کی نوبت پہنچ گئی اور اندازہ کیا گیا کہ قریبًا بارہ سال میں ایک لاکھ آدمی عیسائی مذہب میں داخل ہوجاتا ہے جو ایک عاجزبندہ کوخداخدا کرکے پکارتا ہے اس بات سے کوئی دانابے خبرنہیں کہ ایک جماعت کثیر اسلام کی یا یوں کہو کہ اسلام کے بھوکوں اور ننگوں کا ایک گروہ پادری صاحبوں نے صرف روٹیاں اور کپڑے دکھلا کر اپنے قبضہ میں کرلیا ہے اور جو روٹیوں کے ذریعہ سے قابو نہ آئے وہ عورتوں کے ذریعہ سے اپنے پنجہ میں کئے گئے اور جو اس طرح پربھی دام میں پھنس نہ سکے اُن کے لئے مُلحد اور بے دین کرنے والا فلسفہ پھیلایا گیا جس میں آج لاکھوں نَوخیزبچے مسلمانوں کے گرفتار اور مبتلا پائے جاتے ہیں جو نماز پر ہنستے اور روزہ کو ٹھٹھے سے یادکرتے اور وحی الٰہی کو ایک خواب پریشان خیال کرتے ہیں۔اور جولوگ اس لائق بھی نہیں تھے کہ انگریزی فلسفہ کی تعلیم پاویں اُن کے لئے بہت سے بناوٹی قصّے جو محض پادری صاحبوں کے بائیں ہاتھ کا کرتب تھا جن میں کسی تاریخ یا کہانی کے پیرایہ میں ہجوِ اسلام درج تھی عام طور پر شائع کردئے گئے اورؔ پھر اسلام کے ردّ میں اور ہمارے سیّد ومولیٰ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تکذیب میں بے شمار کتابیں تالیف کرکے اِن لوگوں نے ایک دنیا میں مفت تقسیم کیں اور اکثر کتابوں کے بہت سی زبانوں میں ترجمے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 365
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 365
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/365/mode/1up
    کر کے شائع کئے۔ رسالہ فتح اسلام کے ۴۶صفحہ کے حاشیہ کو پڑھ کردیکھو کہ اکیس سال میں اِن لوگوں نے اپنے پُر تلبیس خیالات کے پھیلانے کے لئے سات کروڑ سے کچھ زیادہ کتابیں مفت تقسیم کی ہیں تا کسی طرح اسلام سے لوگ دستبردارہوجائیں اور حضرت مسیح کو خدامان لیاجائے۔ اللہ اکبر اگر اب بھی ہماری قوم کی نظر میں یہ لوگ اوّل درجہ کے دجّال نہیں اور ان کے الزام کے لئے ایک سچے مسیح کی ضرورت نہیں تو پھر اس قوم کا کیا حال ہوگا۔
    دیکھو! اے غافلو دیکھو ! !کہ اسلامی عمارت کے مسمار کرنے کے لئے کس درجہ کی یہ کوشش کررہے۔اورکس کثرت سے ایسے وسائلؔ مہیّا کئے گئے ہیں اور اُن کے پھیلانے میں اپنی جانوں کو بھی خطرہ میں ڈال کر اور اپنے مال کو پانی کی طرح بہا کر وہ کوششیں کی ہیں کہ انسانی طاقتوں کا خاتمہ کر دیا ہے۔ یہاں تک کہ نہایت شرمناک ذریعے اور پاکیزگی کے برخلاف منصوبے اس راہ میں ختم کئے گئے اور سچائی اور ایمانداری کے اُڑانے کے لئے طرح طرح کی سرنگیں طیارکی گئیں اوراسلام کے مٹادینے کے لئے جھوٹ اور بناوٹ کی تمام باریک باتیں نہایت درجہ کی جانکاہی سے پیدا کی گئیں۔ ہزارہا قصے اور مباحثات کی کتابیں محض افترا کے طور پر اور محض اس غرض سے بنائی گئیں۔ تااگر اور طریق سے نہیں تو اسی طریق سے دلوں پر بداثر پڑے۔ کیا کوئی ایسا رہزنی کا طریق ہے جوایجاد نہیں کیاگیا؟۔ کیاکوئی ایسی سبیل گمراہ کرنے کی باقی ہے جس کے یہ مُوجد نہیں ؟ پس ظاہر ہے کہ یہ کرسچن قوموں اورتثلیث کے حامیوں کی جانب سے وہ ساحرانہ کارروائیاں ہیں اورسحرکے اس کامل درجہ کا نمونہ ہے جو بجُز اوّل درجہ کے دجّال کے جو دجّال معہُود ہے اور کسی سے ظہور پذیر نہیں ہوسکتیں۔ لہٰذا انہیں لوگوں کو جو پادری صاحبوں کا گروہ ہےؔ دجّال معہود ماننا پڑا۔ اورجبکہ ہم دنیا کے اس اکثر حصّہ کی طرف نظر اُٹھا کر دیکھتے ہیں جو گذر چکا توہماری نظر اس استقرائی شہادت کو ساتھ لے کر عود کرتی ہے کہ زمانہ کے سلسلہ گذشتہ میں جہاں تک پتہ مل سکتا ہے دجّالیت کی صفت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 366
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 366
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/366/mode/1up
    اور اس کی کامیابیوں میں کوئی اِ ن لوگوں کا نظیرنہیں اور ان کے ان ساحرانہ کاموں میں کوئی ان کے مساوی نہیں۔ اور چونکہ احادیث صحیحہ میں دجال معہود کی یہی علامت لکھی ہے کہ وہ ایسے فتنے برپا کرے گا کہ جہاں تک اس وقت سے ابتدائے دنیا کے وقت تک نظر ڈالیں اس کا نظیرنہیں ملے گالہٰذا اس بات پر قطع اور یقین کرناچاہیئے کہ وہ مسیح دجّال جو گرجا سے نکلنے والا ہے یہی لوگ ہیں جن کے سحرکے مقابل پر معجزہ کی ضرورت تھی۔اور اگر انکار ہے تو پھر زمانہ گذشتہ کے دجّالین میں سے ان کی نظیر پیش کرو۔
    اب یہ سوال جو کیاجاتاہے کہ ضرور ہے کہ مسیح ابن مریم سے پہلے دجّال آگیا ہو۔ اس کا جواب ظاہرہو گیا اور بپایہ ثبوت پہنچ گیا کہ مسیح دجّال جسؔ کے آنے کی انتظار تھی یہی پادریوں کا گروہ ہے جوٹڈی کی طرح دنیامیں پھیل گیاہے۔ سو اے بزرگو! دجّال معہود یہی ہے جو آچکا مگر تم نے اُسے شناخت نہیں کیا۔ہاتھ میں ترازو لو اور وزن کرکے دیکھوکہ کیا ان سے بڑھ کرکوئی اور ایسا دجّال آنا ممکن ہے جوفریبوں میں ان سے زیادہ ہو۔ اس دجّال کے لئے جو تمہارے وہم میں ہے تم لوگ بار بار یہ حدیث پیش کرتے ہو کہ اس قدر اس کا بڑافتنہ ہوگاکہ ستر ہزار مسلمان اس کا معتقد ہوجائے گا۔ لیکن اس جگہ تولاکھوں آدمی دین اسلام کو چھوڑ گئے اورچھوڑتے جاتے ہیں تمہاری عورتیں،تمہارے بچے، تمہارے پیارے دوست،تمہارے بڑے بڑے بزرگوں اور ولیوں کی اولاد،تمہارے بڑے بڑے خاندانوں کے آدمی اس دجّالی مذہب میں داخل ہوتے جاتے ہیں۔کیا یہ اسلام کے لئے سخت ماتم کی جگہ نہیں۔ سوچ کردیکھو کہ کس قدر ان لوگوں کے فتنوں نے دامن پھیلا رکھا ہے اور کس قدر ان لوگوں کی کوششیں انتہا ء تک پہنچ گئی ہیں کیا کوئی ایسا بھی دقیقہ فریب اور مکر کا ہے جو انہوں نے رہزنی کے لئے استعمال نہیں کیا۔ کروڑہا کتابیں اسی غرض سے ملکوں میں پھیلائیں۔ہزارہا واعظ اورمنّاد اسی غرض کے لئے جابجا چھوڑ دئے۔ کروؔ ڑہا روپیہ اسی راہ میں خرچ ہورہاہے۔ نہایت دشوارگزارراہوں سے پُر خطر پہاڑوں اور یاغستان کے ملک
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 367
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 367
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/367/mode/1up
    اور کافرستان کے وحشی لوگوں اور افریقہ کے جنگلی آدمیوں کے پاس جاتے ہیں اور اسی غرض سے ہمیشہ خشکی اور تری کا سفرکرتے رہتے ہیں تا کسی شخص کو اپنے دام میں لاویں۔ حضرت آدم سے آج تک جو متفرق طور پر گمراہ کرنے کے لئے لوگوں نے فریب کئے ہیں اِن مشنوں میں اُن تمام کا مجموعہ پایا جاتاہے۔ کوئی شخص اگر ایک سال تک سوچتا رہے اور گمراہ کرنے کے جدید جدید فریب نکالے تو آخر جب غورکر کے دیکھے گا تووہ سب فریب ان مشنوں میں پائے گا۔ بہت جگہ ان لوگوں نے ڈاکٹری عہدے بھی حاصل کئے ہیں تااگر اورنہیں تو مصیبت زدہ بیمار ہی قابو آویں۔بہت سا غلّہ اس غرض سے خریداجاتا ہے کہ تا اگر قحط پڑے تو قحط زدہ لوگوں کووہ غلّہ مفت دیاجاوے اور کچھ وعظ بھی سُنادیاجائے۔اکثر جگہ دیکھا گیاہے کہ اتوار کے دن پادری صاحبان کا خیرات خانہ کھلتاہے اور بہت سے مسکین اکٹھے ہوجاتے ہیں اور مناسب وقت کچھ کچھ وعظ کے طورپر اُن کو سُناکر پھر پیسے ٹکے اُنؔ کو دئے جاتے ہیں۔ بہت سی ایسی مِسّوں نے جو پادری کامنصب رکھتی ہیں دونوں وقت لوگوں کے گھروں میں پھرنا اختیار کررکھا ہے اوراشرافوں کی لڑکیوں کو سینا پرونا اور کئی قسم کا سوئی کاکام سکھلاتی ہیں اور رہزنی کے لئے آلۂ نقب بھی بغل میں ہوتا ہے موقعہ پر وہ حربہ بھی چلایا جاتا ہے۔ چنانچہ کئی جوان لڑکیاں اچھے اچھے خاندانوں کی سیّد اورشیخ اورمغل اورنوابوں اور شہزادوں کی اولاد کہلا کر پھر مِس صاحبوں کی کوششوں سے عیسائی جماعت میں جاملی ہیں۔ اور جن مستورہ اور شریفہ عورتوں نے کبھی مدت العمر غیر آدمی کی شکل بھی نہ دیکھی تھی اب وہ عیسائی ہوکر نامحرموں کے ہاتھ میں ہاتھ ڈال کرپھرتی ہیں۔ پاک محبت کے خیال سے نامحرم اگر بوسہ بھی لے لیں تو کچھ بُرا نہیں سمجھاجاتا۔اور یاتوانہوں نے کبھی شراب کانام بھی نہ سُنا تھا اوریا اس خبیث عرق کی دن رات خُوب مشق ہورہی ہے اور برانڈی، شیری، وہسکی، رَم ‘پوٹ، وائن وغیرہ شرابوں کے نام نوک زبان ہورہے ہیں۔ اسی طرح ہزارہا لاوارث بچے مسلمانوں کے انؔ لوگوں کے قبضہ میں آکراور اُن کے تلبیسات کی تعلیم پا کر اب پکّے دشمن
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 368
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 368
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/368/mode/1up
    اسلام کے نظر آتے ہیں کیا کوئی فتنہ اندازی کاکام خیال میں آسکتا ہے جو ان لوگوں نے نہیں کیا۔ کیا دین اسلام کے مٹانے والی تدبیریں کوئی ایسی بھی باقی رہ گئی ہیں جو ان کے ہاتھ سے ظہور میں نہیں آئیں۔اب انصاف کرنا چاہیئے کہ جس حالت میں دنیا کی ابتدا سے آج تک تلبیسکے تمام کاموں میں اور دجّالیت کے تمام طریقوں میں انہیں لوگوں کانمبر سب سے اوّل معلوم ہوتاہے اور اِس قسم کی وبا کے پھیلانے میں دنیا کے صفحہ میں اول سے آج کے دن تک کوئی نظیر ان کی معلوم نہیں ہوتی اور ان لوگوں کی زہر ناک تاثیروں نے بعض لوگوں کو تو پورے طورپر ہلاک کردیا ہے۔ اور بعض کا مفلوج کی طرح نصف حصہ بیکارکردیاہے اور بعض کے خون میں جذامیوں کی طرح فساد ڈال دیا ہے۔ جن کے چہروں پر بڑے بڑے داغ جذام کے نظر آتے ہیں اوربعض کی آنکھوں پرایسا ہاتھ پھیر دیا ہے کہ اب اُن کو کچھ بھی نظر نہیں آتا۔اورنوکر سٹانوں کی ذرّیت کے پھیلنے کی وجہ سے مادرزاد اندھوں کی بھی جماعت بڑھتی جاتی ہے اورؔ کروڑہا تیرہ طبع لوگوں میں ناپاک روحیں شور کررہی ہیں۔ غرض اس وبا پھیلانے والی ہوا کی وجہ سے ایسا زمانہ آگیا ہے کہ کروڑہا جذامی اور کروڑہا مادر زاد اندھے اورکروڑہا مفلوج اور کروڑہا مُردوں کی لاشیں سڑی گلی ہوئی نظر آرہی ہیں۔اب پھر مَیں کہتا ہوں کہ کیااُن کے لئے کوئی مسیح ابن مریم مُحی اموات نہیں آنا چاہیئے تھا جس حالت میں ایسا مسیح دجّال آگیا تو کیا مسیح ابن مریم نہ آتا ؟
    اب یہ شبہات پیش کئے جاتے ہیں کہ دجّال دائیں آنکھ سے کاناہو گا اور یاجوج ماجوج اسی زمانہ میں ظہور کریں گے اور دابۃ الارض بھی آئے گا اور دُخان بھی اور طلوع شمس مغرب کی طرف سے ہوگا اور امام محمد مہدی بھی اس وقت ظہورکرے گا اور دجّال کے ساتھ بہشت اور دوزخ ہوگا اور زمین کے خزانے بھی اس کے ساتھ ہوں گے اورایک پہاڑ روٹیوں کابھی ساتھ ہوگا۔اورایک گدھابھی ہوگا اور دجّال اپنے شعبدے دکھائے گا اورؔ آسمان اور زمین دونوں اس کے حکم میں ہوں گے جس قوم پر چاہے بارش نازل کرے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 369
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 369
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/369/mode/1up
    اور جس قوم کو چاہے خشک سالی سے ہلاک کردے۔ اور انہیں دنوں میں قومیں یاجوج اورماجوج کی ترقی پر ہوں گی اور زمین کو دباتی چلی جاویں گی اورہر یک بلند زمین سے دوڑے گی اور دجّا ل ایک جسیم آدمی سُرخ رنگ ہوگا۔ یہ تمام علامتیں اب کہاں پائی جاتی ہیں۔
    اِن شبہات کا ازالہ اس طرح پر ہے کہ یک چشم سے مراد درحقیقت یک چشم نہیں۔اللہ جلَّ شَانُہٗ قرآن کریم میں فرماتاہے 33 ۱؂ کیا اس جگہ نابینائی سے مراد جسمانی نابینائی ہے بلکہ روحانی نابینائی مراد ہے اورمطلب یہ ہے کہ دجّال میں دینی عقل نہیں ہوگی اورگودنیا کی عقل اس میں تیز ہوگی اور ایسی حکمتیں ایجادکرے گا اور ایسے عجیب کام دکھلائے گا کہ گویا خدائی کا دعویٰ کررہا ہے لیکن دین کی آنکھ بالکل نہیں ہوگی۔ جیسے آج کل یورپ اور امریکہ کے لوگوں کاحال ہے کہ دنیا کی تدبیروں کا انہوں نے خاتمہ کردیاہے۔ اورحدیث میں جو کَاَنِّی کا لفظ موجود ہے وہ بھی دلالت کر رہا ہے جو یہ ایک کشفی امر اور لائق تعبیر ہے جیساکہ ملّا علی قاری نے اسی کی طرف اشارہ کیاہے۔
    اورؔ یاجوج ماجوج کی نسبت تو فیصلہ ہوچکا ہے جو یہ دنیاکی دو بلند اقبال قومیں ہیں جن میں سے ایک انگریز اوردوسرے روس ہیں۔ یہ دونوں قومیں بلندی سے نیچے کی طرف حملہ کررہی ہیں یعنی اپنی خداد اد طاقتوں کے ساتھ فتحیاب ہوتی جاتی ہیں۔ مسلمانوں کی بدچلنیوں نے مسلمانوں کو نیچے گرادیا۔ اور اُن کی تہذیب اور متانت شعاری اورہمت اوراُلوالعزمی اورمعاشرت کے اعلیٰ اصولوں نے بحکم و مصلحت قاد ر مطلق ان کو اقبال دے دیا۔ان دونوں قوموں کا بائبل میں بھی ذکر ہے۔
    اور دآبۃُ الارض سے مراد کوئی لایعقل جانورنہیں بلکہ بقول حضرت علی رضی اللہ عنہ آدمی کا نام ہی دآبۃُ الارض *ہے۔ اور اس جگہ لفظ دآبۃُالارض سے ایک ایسا طائفہ انسانوں کا
    آثارالقیامہ میں لکھا ہے کہ حضرت علی کرم اللہ وجھہ سے پوچھا گیا کہ لوگ گمان کرتے ہیں کہ دآبۃُالارض آپ ہی ہیں تب آپ نے جواب دیا کہ دآبۃ الارض میں تو کچھ چارپایوں اور کچھ پرندوں کی بھی مشابہت ہو گی۔ مجھ میں وہ کہاں ہے اور یہ بھی لکھا ہے کہ دآبۃ الارض اسم جنس ہے جس سے ایک طائفہ مراد ہے۔ منہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 370
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 370
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/370/mode/1up
    مراد ہے جو آسمانی روح اپنے اندرنہیں رکھتے لیکن زمینی علوم و فنون کے ذریعہ سے منکرین اسلام کو لاجواب کرتے ہیں اور اپنا علم کلام اور طریق مناظرہ تائید دین کی راہ میں خرچ کرکے بجان و دل خدمت شریعت غرّا بجا لاتے ہیں۔سو وہ چونکہ درحقیقت زمینی ہیں آسمانی نہیں۔ اور آسمانی روح کامل طور پر اپنےؔ اندرنہیں رکھتے اس لئے دآبۃُالارض کہلاتے ہیں اور چونکہ کامل تزکیہ نہیں رکھتے اورنہ کامل وفاداری۔ اس لئے چہرہ اُن کا انسانوں کاہے مگر بعض اعضاء اُن کے بعض دوسرے حیوانات سے مشابہ ہیں۔ اسی کی طرف اللہ جلَّ شَانُہٗ اشارہ فرماتاہے 3333 ۱؂ یعنی جب ایسے دن آئیں گے جو کفار پر عذاب نازل ہو اور ان کا وقت مقدّر قریب آجائے گا توہم ایک گروہ دابۃالارض کا زمین میں سے نکالیں گے وہ گروہ متکلمین کاہو گا جو اسلام کی حمایت میں تمام ادیان باطلہ پر حملہ کرے گا یعنی وہ علماء ظاہر ہوں گے جن کو علم کلام اورفلسفہ میںیدِ طولیٰ ہوگا۔ وہ جابجا اسلام کی حمایت میں کھڑے ہوجائیں گے اور اسلام کی سچائیوں کو استدلالی طورپر مشارق مغارب میں پھیلائیں گے اور اس جگہ اَخْرَجْنَاکا لفظ اس وجہ سے اختیار کیاکہ آخری زمانہ میں اُن کا خروج ہو گا نہ حدوث یعنی تخمی طور پر یا کم مقدارکے طور پر تو پہلے ہی سے تھوڑے بہت ہر یک زمانہ میں وہ پائے جائیں گے لیکن آخری زمانہ میں بکثرت اور نیز اپنے کمال لائق کے ساتھ پیدا ہوںؔ گے اورحمایت اسلام میں جا بجا واعظین کے منصب پر کھڑے ہوجائیں گے اور شمار میں بہت بڑھ جائیں گے۔
    واضح ہو کہ یہ خروج کا لفظ قرآن شریف میں دوسرے پیرایہ میں یاجوج ماجوج کے لئے بھی آیا ہے اور دخان کے لئے بھی قرآن شریف میں ایسا ہی لفظ استعمال کیا گیا ہے۔ جس کے معنوں کا ماحصل خروج ہی ہے اور دجّال کے لئے بھی حدیثوں میں یہی خروج کا لفظ استعمال کیا گیا ہے۔سو اس لفظ کے استعمال کرنے کی وجہ یہ ہے تا اس بات کی طرف
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 371
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 371
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/371/mode/1up
    اشارہ ہو کہ یہ چیزیں جو آخری زمانہ میں ظہور پذیرہوں گی وہ ابتدائی زمانوں میں بکلّی معدوم نہیں ہوں گی بلکہ اپنے وجود نوعی یامثالی کے ساتھ جو آخری وجود کا ہمرنگ اور مماثل ہوگا پہلے بھی بعض افراد میں ان کا وجود متحقق ہوگالیکن وہ وجود ایک ضعف اور کمزوری اورناکامی کی حالت میں ہوگا۔ مگر دوسرا وجود جس کو خروج کے لفظ سے تعبیر کیا گیاہے اس میں ایک جلالی حالت ہوگی یعنی پہلے وجود کی طرح ضعف اور کمزوری نہیں ہوگی اور ایک طاقت کے ساتھ اس کا ظہورہوگا جس کے اظہار کے لئے خروج کا لفظ استعمال کیا گیاہے۔ اِسی بنا پر مسلمانوں میں یہ خیال چلا ؔ آتا ہے کہ مسیح دجّال آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت سے موجود ہے اور پھر اُن کے خیالات میں ایسی غلطی پک گئی ہے کہ ابتک مسیح ابن مریم کی طرح اس کو زندہ سمجھا ہوا ہے۔ جوکسی جزیرہ میں مقید اورجکڑاہوا ہے اور اس کی جساسہ بھی اب تک زندہ ہے جو اس کو خبریں پہنچارہی ہے افسوس کہ یہ لوگ حدیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں غلط فہمی کر کے کیسی مصیبتوں میں پھنس گئے۔ ایسا ہی یہ لوگ یاجوج ماجوج کو بھی وجود شخصی کے ساتھ زندہ سمجھتے ہیں یعنی بقا ء شخصی کے قائل ہیں۔اب جبکہ دجّال اور اس کی جساسہ اور یاجوج ماجوج کے کروڑہا آدمی اور دابۃ الارض اور بقول بعض ابن صیّاد بھی اب تک زندہ ہیں تو حضرت مسیح اگر زندہ نہ ہوں تو ان کی حق تلفی ہے۔ میرے نزدیک بہت سہل طریق ثبوت کا یہ ہے کہ مولوی صاحبان کوشش کر کے کوئی یاجوج ماجوج کا آدمی یا دجّال کی جساسہ یا ابن صیّاد کو ہی کسی جنگل سے پکڑ کرلے آویں پھر کیا بات ہے سب مان جائیں گے کہ اسی طرح حضرت مسیح بھی آسمان پر زندہ ہیں اور مفت میں فتح ہوجائے گی۔ حضرات ! اب ہمت کیجئے کہیں سے دجّال شریر کی جساسہ کو ہی پکڑؔ یئے حوصلہ نہ ہاریں آخر یہ سب زمین پر ہی ہیں۔ابن تمیم کی حدیث کو مسلم میں پڑھ کر اسی پتہ سے جساسہ دجّال کا سُراغ لگائیے یا خبیث دجّال کو ہی جو زنجیروں میں جکڑا ہوا ہے بچشم خود دیکھ کر پھر اَوروں کو دکھلائیے۔ بات تو خوب ہے۔انگریزوں نے ہمت اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 372
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 372
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/372/mode/1up
    کوشش کر کے نئی دنیا کا سُراغ لگا ہی لیا۔ آپ اس ایک ناکارہ کام میں ہی کامیابی دکھلائیے شاید ان لوگوں میں سے کسی کا پتہ چلے بہر کارے کہ ہمت بستہ گردد۔ اگر خارے بود گلدستہ گردد۔ اور اگرایسا نہیں کرو گے تو پھر خیر اس میں ہے کہ ان بیہودہ خیالات سے بازآجائیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے قسمیں کھا کر فرمایا ہے کہ کوئی جاندار اس وقت سے سو برس تک زمین پر زندہ نہیں رہ سکتا۔ مگر آپ ناحق ان سب جانداوں کو اس زمانہ سے آج تک زندہ خیال کر رہے ہیں۔ یہ تحقیق اور تدقیق کا زمانہ ہے اسلام کا ایسا خاکہ کھینچ کر نہ دکھلائیے جس پر بچہ بچہ ہنسی کرے۔ غور کرکے سوچئے کہ یہ کروڑہا انسان جو صدہا برسوں سے زندہ فرض کئے گئے ہیں جو اب تک مرنے میں نہیں آتے کس ملک اور کس شہر میں رہتے ہیں۔ تعجب کہ معمورۂ دنیا کیؔ حقیقت بخوبی کھل گئی اورپہاڑوں اور جزیروں کا حال بھی بخوبی معلوم ہو گیا اور تفتیش کرنے والوں نے یہاں تک اپنی تفتیش کوکمال تک پہنچادیا جو ایسی آبادیاں جو ابتدا ءِ دُنیا سے معلوم نہ تھیں وہ اب معلوم ہوگئیں مگر اب تک اس جساسہ اوردجّال اورابن صیّاد مفقود الخبر اور دابۃ الارض اور یاجوج ماجوج کے کروڑہا انسانوں کا کچھ پتہ نہیں ملتا۔ سو اَے حضرات ! یقینًا سمجھو کہ وہ سب جاندار جو انسان کی قسم میں سے تھے اس دنیا سے کوچ کرگئے پردۂ زمین میں چھپ گئے اور مسلم کی سو برس والی حدیث نے اپنی جلالی سچائی سے موت کا مزہ اُنہیں چکھا دیا۔ اب ان کی انتظار آپ کی خام خیالی ہے۔ اب تو اِنّا للّٰہ کہہ کر ان کورخصت شدہ سمجھئے۔
    اور اگر آپ کے دل میں یہ خلجان گذرے کہ احادیث نبویہ میں اُن کے خروج کا وعدہ ہے اس کے اس صورت میں کیا معنے ہوں گے۔ سو سنو ! اس کے سچے معنے جو اللہ جلَّ شَانُہٗ نے میرے پر ظاہر کئے ہیں وہ یہ ہیں کہ اِن سب چیزوں کا آخری زمانہ میں جلالی طور پر صور مثالیہ میں ظہور مراد ہے مثلًا پہلے دجّال کو اس طرح پر دیکھا گیا کہ وہ زنجیروں میں جکڑا ہوا کمزورؔ اور ضعیف ہے کسی پرحملہ نہیں کر سکتا مگر اس آخری زمانہ میں عیسائی مشن کا
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 373
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 373
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/373/mode/1up
    دجال اُسی دجّال کے رنگ میں ہوکر قوت کے ساتھ خروج کررہا ہے اورگویا مثالی اورظلّی وجود کے ساتھ وہی ہے اور جیسا کہ وہ اوّل زمانہ میں گرجا میں جکڑا ہوا نظر آیا تھا اب وہ اس بند سےَ مخلصی پا کر عیسائیوں کے گرجا سے ہی نکلا ہے اور دنیا میں ایک آفت برپا کررہا ہے۔
    ایسا ہی یاجوج ماجوج کا حال بھی سمجھ لیجئے۔ یہ دونوں پرانی قومیں ہیں جوپہلے زمانوں میں دوسروں پر کھلے طورپر غالب نہیں ہوسکیں اور اُن کی حالت میں ضعف رہا لیکن خداتعالیٰ فرماتا ہے کہ آخری زمانہ میں یہ دونوں قومیں خروج کریں گی یعنی اپنی جلالی قوت کے ساتھ ظاہر ہوں گی۔ جیسا کہ سورۂ کہف میں فرماتا ہے 33 ۱؂ یعنی یہ دونوں قومیں دوسروں کو مغلوب کر کے پھر ایک دوسرے پر حملہ کریں گی اور جس کو خدائے تعالیٰ چاہے گا فتح د ے گا۔ چونکہ ان دونوں قوموں سے مراد انگریز اور رُوس ہیں اسؔ لئے ہریک سعادتمند مسلمان کو دعاکرنی چاہیئے کہ اُس وقت انگریزوں کی فتح ہو۔ کیونکہ یہ لوگ ہمارے محسن ہیں۔اور سلطنت برطانیہ کے ہمارے سر پر بہت احسان ہیں۔ سخت جاہل اور سخت نادان اور سخت نالائق وہ مسلمان ہے۔ جو اس گورنمنٹ سے کینہ رکھے اگر ہم ان کا شکر نہ کریں تو پھر ہم خدائے تعالیٰ کے بھی ناشکر گزار ہیں کیونکہ ہم نے جو اس گورنمنٹ کے زیر سایہ آرام پایا اور پار ہے ہیں وہ آرام ہم کسی اسلامی گورنمنٹ میں بھی نہیں پا سکتے۔ہر گز نہیں پا سکتے۔
    ایساؔ ہی دابۃ الارض یعنی وہ علماء و واعظین جو آسمانی قوت اپنے اندر نہیں رکھتے ابتدا سے چلے آتے ہیں لیکن قرآن کا مطلب یہ ہے کہ آخری زمانہ میں ان کی حد سے زیادہ کثرت ہو گی اور اُن کے خروج سے مراد وہی اُن کی کثرت ہے۔
    اور یہ نکتہ بھی یاد رکھنے کے لائق ہے کہ جیسی ان چیزوں کے بارے میں جو آسمانی قوت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 374
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 374
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/374/mode/1up
    اپنے اندر نہیں رکھتیں اور آخری زمانہ میں پورے جوش اور طاقت کے ساتھ ظہور کریں گی۔ خروج کالفظ استعمال ہوا ہے۔ ایسا ہی اُس شخص کے بارے میں جو حدیثوں میں لکھا ہے کہ آسمانی وحی اور قوت کے ساتھ ظہور کرے گا نزول کا لفظ استعمال کیاگیا ہے۔ سو اِن دونوں لفظوں خروج اور نزول میں درحقیقت ایک ہی امر مدنظر رکھا گیا ہے یعنی اس بات کا سمجھانا منظور ہے کہ یہ ساری چیزیں جو آخری زمانہ میں ظاہر ہونے والی ہیں باعتباراپنی قوتِ ظہور کے خروج اور نزول کی صفت سے متصف کی گئی ہیں جو آسمانی قوت کے ساتھ آنے والا تھا اس کو نزول کے لفظ سے یاد کیا گیا اور جو زمینی قوت کے ساتھ نکلنے والا تھا اس کو خروج کے لفظ کے ساتھ پکارا گیا تا نزول کے لفظ سے آنےؔ والے کی ایک عظمت سمجھی جائے اور خروج کے لفظ سے ایک خفّت اور حقارت ثابت ہو اورنیزیہ بھی معلوم ہو کہ نازل خارج پر غالب ہے۔
    ایسا ہی دُخان جس کا قرآن شریف میں ذکر ہے کچھ آخری زمانہ سے ہی خاص نہیں ہے ہاںآخری زمانہ میں جو ہمارا زمانہ ہے اس کا بیّن اورکھلے کھلے طور پر ظہور ہوا ہے جیسا کہ اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتا ہےسورۃ الدخان الجزونمبر ۲۵ یعنی اس روشن اور کھلی کھلی کتاب کی قسم ہے کہ ہم نے اس قرآن کریم کو ایک مبارک رات میں اُتارا ہے کیونکہ ہمیں منظور تھا کہ نافرمانی کے نتائج سے ڈراویں۔ وہ رات ایک ایسیؔ بابرکت رات ہے کہ تمام حکمت کی باتیں اس میں کھولی جاتی ہیں اور ایسا ہی ہم نے چاہا ہے اور تیرے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 375
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 375
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/375/mode/1up
    رب نے رحمت کی راہ سے ایسا ہی اراد ہ کیا ہے کہ کل معارف ودقائق الٰہیہ کا تیری بعثت مبارکہ پر ہی خاتمہ ہو اوروہی کلام کل معارف حکمیہ کا جامع ہو جو تجھ پرنازل ہوا ہے اور یہ بات ہم پہلے بھی لکھ چکے ہیں اور اس برکت والی رات سے مراد ایک تو وہی معنے ہیں جو مشہور ہیں اوردوسری آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ بعثت کی رات ہے اور اس کا دامن قیامت کے دن تک پھیلا ہوا ہے اور آیت 3 ۱؂میں اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ وہ تمام زمانہ جو قیامت تک آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد رسالت کے تحت میں ہے فیوض قرآن کریم سے بہت فائدہ اُٹھائے گا اور وہ تمام معارف الٰہیہ جو دنیا میں مخفی چلے آتے تھے اس زمانہ میں وقتًا فوقتًا ظہورپذیر ہوتے رہیں گے اور نیز آیت33 میں یہ بھی اشارہ ہے کہ اس زمانہ بابرکت کے خواص میں سے یہ بھی ہوگا کہ معاش اور معاد کے کل علوم حکمیہ اپنے اعلیٰ درجہ کے کمالات کے ساتھ ظہورپذیرہوں گے اور کوئی امر حکمت ایسا نہیں رہے گا جس کی تفصیل نہ کی جائے۔ پھر آگے فرماؔ یا کہ خداوہ خدا ہے جس نے زمین و آسمان کو بنایا اورجو کچھ اس کے درمیان ہے سب اُسی نے پیدا کیا تا تم اُسی صانع حقیقی پر یقین لاؤ اورشک کرنے کی کوئی وجہ نہ رہے۔ کوئی معبود اس کے سوا نہیں۔ وہ زندہ کرتا ہے اور مارتا ہے تمہارا رب ہے اورتمہارے اُن باپ دادوں کا رب جو تم سے پہلے گذر چکے ہیں۔ بلکہ وہ تو شکوک و شبہات میں پڑے ہوئے ہیں۔ ان دلائل کی طرف انہیں کہاں نظر ہے۔ پس تُو اُس دن کا امیدوار رِہ جس دن آسمان ایک کھلا کھلا دھواں لائے گا جس کو دیکھ کر کہیں گے کہ یہ عذاب دردناک ہے اور کہیں گے کہ اے ہمارے خدا یہ عذاب ہم سے اٹھا۔ ہم ایمان لائے۔
    اس جگہ دخان سے مراد قحط عظیم وشدید ہے جو سات برس تک آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ مبارکہ میں پڑا یہاں تک کہ لوگوں نے مُردے اورہڈیاں کھائی تھیں جیسا کہ ابن مسعود کی حدیث میں مفصّل اس کا بیان ہے۔ لیکن آخری زمانہ کے لئے بھی جو ہمارا زمانہ ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 376
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 376
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/376/mode/1up
    اس دخان مبین کا وعدہ تھا اس طرح پر کہ قبل از ظہور مسیح نہایت درجہ کی شدت سے اس کا ظہور ہو گا۔ اب سمجھناچاہیئے کہ یہ آخری زمانہ کا قحط جسماؔ نی اور روحانی دونوں طور سے وقوع میں آیا۔ جسمانی طور سے اس طرح کہ اگر اب سے پچاس برس گذشتہ پر نظر ڈالی جاوے تو معلوم ہوگا کہ جیسے اب غلّہ اور ہر یک چیز کا نرخ عام طور پر ہمیشہ کم رہتا ہے اس کی نظیر پہلے زمانوں میں کہیں نہیں پائی جاتی۔ کبھی خواب و خیال کی طرح چند روز گرانی غلّہ ہوتی تھی اورپھر وہ دن گذر جاتے تھے لیکن اب تو یہ گرانی لازم غیر منفک کی طرح ہے اورقحط کی شدّت اندر ہی اندر ایک عالم کو تباہ کررہی ہے۔
    اور روحانی طورپر صداقت اورامانت اور دیانت کا قحط ہوگیا ہے اور مکر اور فریب اورعلوم و فنون مظلمہ دُخان کی طرح دنیا میں پھیل گئی ہیں اور روز بروز ترقی پرہیں۔ اس زمانہ کے مفاسد کی صورت پہلے زمانوں کے مفاسد سے بالکل مختلف ہے۔ پہلے زمانوں میں اکثر نادانی اور اُمّیت رہزن تھی اس زمانہ میں تحصیل علوم رہزن ہورہی ہے۔ ہمارے زمانہ کی نئی روشنی جس کو دوسرے لفظوں میں دخان سے موسوم کرنا چاہیئے عجیب طورپر ایمان اور دیانت اور اندرونی سادگی کو نقصان پہنچارہی ہے۔ سوفسطائی تقریروں کے غبار نے صداقت کے آفتاب کو ؔ چھپادیا ہے اور فلسفی مغالطات نے سادہ لوحوں کوطرح طرح کے شبہات میں ڈال دیا ہے۔ خیالات باطلہ کی تعظیم کی جاتی ہے اورحقیقی صداقتیں اکثر لوگوں کی نظر میں کچھ حقیر سی معلوم ہوتی ہیں۔ سو خدائے تعالیٰ نے چاہا کہ عقل کے رہزدوں کو عقل سے درست کرے اورفلسفہ کے سرگشتوں کو آسمانی فلسفہ کے زور سے راہ پر لاوے سو یہ کامل درجہ کا دُخان مبین ہے جو اس زمانہ میں ظاہر ہوا ہے۔
    ایسا ہی طلوع شمس کا جو مغرب کی طرف سے ہو گا۔ ہم اسپر بہر حال ایمان لاتے ہیں لیکن اس عاجز پر جو ایک رؤیامیں ظاہرکیا گیا وہ یہ ہے جو مغرب کی طرف سے آفتاب کا چڑھنا یہ معنی رکھتا ہے کہ ممالک مغربی جو قدیم سے ظلمت کفر وضلالت میں ہیں آفتابِ صداقت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 377
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 377
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/377/mode/1up
    سے منّور کئے جائیں گے اور اُن کو اسلام سے حصّہ ملے گا۔ اور میں نے دیکھا کہ میں شہر لنڈن میں ایک منبر پر کھڑا ہوں اور انگریزی زبان میں ایک نہایت مدلّل بیان سے اسلام کی صداقت ظاہر کر رہا ہوں۔ بعد اس کے میں نے بہت سے پرندے پکڑے جوچھوٹے چھوٹے درختوں پر بیٹھے ہوئے تھے اور اُن کے رنگ سفید تھے اورشاید تیترکے جسم کے موافق اُن کا جسمؔ ہوگا۔سو میں نے اس کی یہ تعبیر کی کہ اگرچہ میں نہیں مگر میری تحریریں اُن لوگوں میں پھیلیں گی۔ اور بہت سے راستباز انگریز صداقت کے شکارہوجائیں گے۔ درحقیقت آج تک مغربی ملکوں کی مناسبت دینی سچائیوں کے ساتھ بہت کم رہی ہے گویا خدائے تعالیٰ نے دین کی عقل تمام ایشیا کو دے دی اور دنیا کی عقل تمام یورپ اور امریکہ کو۔ نبیوں کا سلسلہ بھی اول سے آخر تک ایشیا کے ہی حصہ میں رہا اور ولایت کے کمالات بھی انہیں لوگوں کو ملے۔ اب خدائے تعالیٰ ان لوگوں پر نظر رحمت ڈالنا چاہتا ہے۔
    اوریاد رہے کہ مجھے اس بات سے انکار نہیں کہ طلوع الشمس من مغربھا کے کوئی اور معنے بھی ہوں َ میں نے صرف اُس کشف کے ذریعہ سے جو خدائے تعالیٰ نے مجھے عطاکیا ہے مذکورہ بالا معنے کو بیان کیا ہے۔اگر کوئی مولوی مُلّا ان الٰہی مکاشفات کو الحاد کی طرف منسوب کرے تو وہ جانے اور اس کا کام۔ وما قلت من عند نفسی بل اتبعت ما کشف علیّ واللّٰہ بصیر بحالی وسمیع لمقالی فاتقوااللّٰہ ایّھا العلماء۔
    لیکن اگر کوئی اس جگہ یہ سوال کرے کہ جب مغرب کی طرف سے آفتاؔ ب طلوع کرے گا تو جیسا کہ لکھا ہے توبہ کا دروازہ بند ہوجائے گا تو پھر اگر یہی معنے سچ ہیں تو ایسے اسلام سے کیا فائدہ جو مقبول ہی نہیں۔
    اِس کا جواب یہ ہے کہ توبہ کا دروازہ بند ہونے سے یہ مطلب تو نہیں کہ توبہ منظور ہی نہیں ہو گی۔ بلکہ مطلب یہ ہے کہ جب ممالک مغربی کے لوگ فوج درفوج دین اسلام میں داخل ہوجائیں گے تب ایک انقلاب عظیم ادیان میں پیدا ہوگا۔ اور جب یہ آفتاب
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 378
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 378
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/378/mode/1up
    پورے طور پر ممالک مغربی میں طلوع کرے گا تو وہی لوگ اسلام سے محروم رہ جائیں گے جن پر دروازہ توبہ کابند ہے یعنی جن کی فطرتیں بالکل مناسب حال اسلام کے واقع نہیں۔ سو توبہ کا دروازہ بند ہونے کے یہ معنے نہیں کہ لوگ توبہ کریں گے مگرمنظورنہ ہوگی۔اور خشوع اورخضوع سے روئیں گے مگر ردّ کئے جائیں گے کیونکہ یہ تواس دنیا میں اس رحیم و کریم کی شان سے بالکل بعید ہے۔ بلکہ مطلب یہ ہے کہ اُن کے دل سخت ہوجائیں گے اور انکو توبہ کی توفیق نہیں دی جائے گی اوروہی اشرار ہیں جن پر قیامت آئیگی ۔ فتفکّر وتدبّر۔
    ایسا ہی مہدی کے بارہ میں جو بیان کیا جاتا ہے کہ ضرور ہے کہ پہلے امام محمدؐ مہدی آویں اوربعد اس کے ظہور مسیح ابن مریم کا ہو۔ یہ خیال قلّتؔ تدبّر کی وجہ سے پیدا ہوا ہے اگر مہدی کا آنا مسیح ابن مریم کے زمانہ کے لئے ایک لازم غیر منفک ہوتا اور مسیح کے سلسلہ ظہورمیں داخل ہوتا تو دو بزرگوار شیخ اور امام حدیث کے یعنی حضرت محمد اسمٰعیل صاحب صحیح بخاری اورحضرت امام مسلم صاحب صحیح مسلم اپنے صحیحوں سے اس واقعہ کو خارج نہ رکھتے۔لیکن جس حالت میں انہوں نے اس زمانہ کا تمام نقشہ کھینچ کر آگے رکھ دیا اور حصر کے طورپر دعویٰ کر کے بتلادیا کہ فلاں فلاں امر کا اس وقت ظہور ہوگا۔ لیکن امام محمد مہدی کانام تک بھی تو نہیں لیا۔ پس اس سے سمجھاجاتاہے کہ انہوں نے اپنی صحیح اور کامل تحقیقات کی رُو سے اُن حدیثوں کو صحیح نہیں سمجھا جو مسیح کے آنے کے ساتھ مہدی کا آنا لازم غیرمنفک ٹھہرارہی ہیں اور دراصل یہ خیال بالکل فضول اور مہمل معلوم ہوتاہے کہ باوجود یکہ ایک ایسی شان کاآدمی ہو کہ جس کو باعتبار باطنی رنگ اور خاصیت اس کی کے مسیح ابن مریم کہنا چاہیئے دنیا میں ظہور کرے اورپھرا س کے ساتھ کسی دوسرے مہدی کاآنا بھی ضروری ہو۔ کیا وہ خود مہدی نہیں ہے ؟ کیا وہ خدائے تعالیٰ کی طرف سے ہدایت پا کر نہیں آیا؟ کیااُس کے پاس اس قدر جواہرات وخزائن واموال معارف و دقائق نہیںؔ ہیں کہ لوگ لیتے لیتے تھک جائیں اور اِس قدراُن کا دامن بھر جائے جو قبول کرنے کی جگہ نہ رہے۔ پس اگر یہ سچ ہے تو اُس وقت
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 379
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 379
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/379/mode/1up
    دوسرے مہدی کی ضرورت ہی کیا ہے اور یہ صرف امامین موصوفین کاہی مذہب نہیں۔ بلکہ ابن ماجہ اورحاکم نے بھی اپنی صحیح میں لکھا ہے کہ لامھدی الّا عیسیٰ یعنی بجُز عیسیٰ کے اُس وقت کوئی مہدی نہ ہوگا۔ اور یوں تو ہمیں اس بات کا اقرار ہے کہ پہلے بھی کئی مہدی آئے ہوں اور ممکن ہے کہ آئندہ بھی آویں اور ممکن ہے کہ امام محمدؐ کے نام پر بھی کوئی مہدی ظاہر ہو لیکن جس طرز سے عوام کے خیال میں ہے اس کا ثبوت پایا نہیں جاتا۔ چنانچہ یہ صرف ہماری ہی رائے نہیں اکثر محقق یہی رائے ظاہرکرتے آئے ہیں۔
    بعض کہتے ہیں کہ اچھا مہدی کا قصّہ جانے دو۔ لیکن یہ جو بار بار حدیثو ں میں بیان کیا گیا ہے کہ عیسیٰ آئے گا۔ مسیح ابن مریم نازل ہوگا۔ اِن صریح لفظوں کی کیوں تاویل کی جائے۔اگر اللہ جلَّ شَانُہٗ کے علم اور ارادہ میں ابن مریم سے مراد ابن مریم نہیں تھا تو اس نے لوگوں کو دانستہ اِن مشکلات میں کیوں ڈالا اور سیدھا کیوں یہ نہ کہہ دیا کہ کوئی مثیل مسیح آئےؔ گا۔ بلکہ کون سی ضرورت اس بات کی طرف داعی تھی جو ضرور مثیل مسیح آتا کوئی اورنہ آتا۔ اب کھلے کھلے لفظوں سے کیوں کر انکار کریں یہ انکار تو دراصل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تکذیب ہے اور درپردہ اس انکار کے یہ معنے ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی یہ پیشگوئی غلط ہے۔
    لیکن واضح ہو کہ یہ تمام اوہام باطلہ ہیں۔ قرآن کریم اوراحادیث میں بغرض آزمائش خلق اللہ ایسے ایسے استعارات کا مستعمل ہونا کوئی انوکھی اور بے اصل بات نہیں۔ اور پہلی کتابوں میں ایسے استعارات کی نظیر موجود ہے ایلیا کے قصہ کو دیکھو جس کو یوحنا کہا گیاہے۔ جبکہ قرآن شریف نے قطعی اوریقینی طورپر ظاہر کردیا کہ حضر ت مسیح ابن مریم فوت ہوگئے ہیں تو اب اس سے بڑھ کر ضرورتِ تاویل کے لئے اور کیاقرینہ ہوگا۔ مثلًا فرض کے طورپر بیان کرتاہوں کہ ایک مستند خط کے ذریعہ سے معلوم ہوا کہ ایک شخص کلکتہ میں رہنے والا عبد الرحمن نام جس کی شہادت کسی مقدمہ کے لئے مؤثر تھی فوت ہوگیا ہے۔ پھر بعد اس کے ہم نے ایک ایسا کاغذ تمسّک دیکھا جس پر
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 380
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 380
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/380/mode/1up
    ایک شخص عبد الرحمن نام کلکتہ کے رہنے والے کی گواہی تاریخ وفاتؔ کے بعد میں درج تھی تو کیا ہمیں یہ سمجھ لینا چاہیئے کہ وہی عبدالرحمن جو فو ت ہوچکا تھا زندہ ہو کر اپنی گواہی لکھ گیا ہے پس چونکہ اس عبد الرحمن کے زندہ ہوجانے کاہمارے پاس کوئی بھی ثبوت نہیں تو کیا صرف خدائے تعالیٰ کی قدرت کے حوالہ سے ہم کسی ایسی صورت کے مقدمہ میں جوعدالت میں پیش ہے بغیر اس بات کے ثبوت دینے کے کہ درحقیقت وہی عبد الرحمن زندہ ہوکر اپنی گواہی لکھ گیا ہے ڈگری کے پانے کے مستحق ٹھہر سکتے ہیں ہرگز نہیں۔
    اور یہ دغدغہ کہ کیوں مسیح ابن مریم کے لفظ کو اختیار کیا گیا۔ تو اس کا جواب یہ ہے کہ یہ اُسی طرز کا محاورہ ہے جیسے یحيٰ بن زکریا کے لئے ایلیا کا لفظ استعمال کیا گیا ہے۔ خدائے تعالیٰ کو منظورتھا کہ آخری زمانہ میں کوئی شخص مسیح کی قوت اورطبع میں پیداہواور وُہ اس گروہ کذّاب کا مقابلہ کرے جن کی طبیعت اس طبیعت کے مغائر و مخالف واقع ہے۔ سو گروہ کذّاب کا نام اُس نے مسیح دجّال رکھااورحامی حق کا نام مسیح ابن مریم قرار دیا اور اس کو بھی ایک گروہ بنایا جو مسیح ابن مریم کے نام سے سچائی کی فتح کے لئے دنیا کے اخیر تک کوشش کرتا رہے گا۔ سو ضرور تھا کہ ؔ یہ آنے والا مسیح ابن مریم کے نام سے ہی آتا۔ کیونکہ جس تاثیر اماتت احیاء کو مسیح دجّال نے پھیلانا چاہا ہے اس تاثیر کے مخالف مسیح ابن مریم کو تاثیر دی گئی ہے جو روح القدس کے ذریعہ سے اس کو ملی ہے سو جو شخص مسیح کے قدم پر وہ تاثیر لے کر آیا اور زہر ناک ہوا کے مقابل پر جو ہلاک کرتی ہے یا ہلاکت تک پہنچاتی ہے ایک تریاقی نفس اس کو عطا ہؤا۔اس وجہ سے وہ مسیح ابن مریم کہلایا کیونکہ وہ روحانی طور پر مسیح کے رنگ میں ہو کر آیا۔ مسیح کیوں کر آسکتا۔ وہ رسو ل تھا اور خاتم النبیین کی دیوار روئیں اس کو آنے سے روکتی ہے۔ سو اس کا ہمرنگ آیا وہ رسول نہیں مگر رسولوں کے مشابہ ہے اور امثل ہے۔کیا عام لفظو ں میں کسی حدیث میں یہ بھی بیان کیا گیا ہے کہ بعض گزشتہ رسولوں میں سے پھر اس امت میں آئیں گے جیسا کہ یہ بیان کیا گیا ہے کہ اُن کے مثیل آئیں گے اور امثل آئیں گے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 381
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 381
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/381/mode/1up
    جو فطرتاً انبیاء سے بہت اقرب ہیں سو جن کے آنے کاصاف طور پر بلا تعارض وعدہ دیا گیا ہے اُن سے مُنہ مت پھیرو اور اُن کے الہام سے بھی شہاد ت کا فائدہ اُٹھاؤ کیونکہ اُن کی گواہی اس بات کو کھولتی ہے جو تم اپنی عقلوں سے کھول نہیں سکتے۔ آسمانی گواہی کے ردّ کرؔ نے میں جرأت نہ کرو کیونکہ یہ بھی اُسی پاک چشمہ سے نکلی ہے جس سے وحی نبوت نکلی ہے۔ سو یہ وحی کے معنے کی شارح اور صراط مستقیم کو دکھلانے والی ہے۔
    وصیّتُ الحق
    اے ناظرین ! اب یہ عاجز اس مضمون کو ختم کر چکا اور اس تمام تحقیقات سے معلوم ہوا کہ شرعی اور نقلی طور پر ہمارے اس الہام کی تصدیق یا تکذیب کے لئے جو مسیح ابن مریم وفات پا چکا ہے تین راہیں ہیں۔ (۱) قرآن کریم (۲)احادیث (۳) اقوال سلف و خلف۔ اور اِن تینوں راہوں کے ذریعہ سے ہمارے الہام کی تصدیق ہورہی ہے۔سب سے سیدھی راہ اوربڑا ذریعہ جو انوار یقین اور تواتر سے بھر اہوا اور ہماری روحانی بھلائی اور ترقی علمی کے لئے کامل رہنما ہے قرآن کریم ہے جو تمام دنیا کے دینی نزاعوں کے فیصل کرنے کا متکفل ہوؔ کر آیا ہے جس کی آیت آیت اورلفظ لفظ ہزارہا طور کا تواتر اپنے ساتھ رکھتی ہے اور جس میں بہت سا آبِ حیات ہماری زندگی کے لئے بھراہوا ہے اور بہت سے نادر اور بیش قیمت جواہر اپنے اندر مخفی رکھتا ہے جو ہر روز ظاہر ہوتے جاتے ہیں۔ یہی ایک عمدہ محک ہے جس کے ذریعہ سے ہم راستی اور ناراستی میں فرق کرسکتے ہیں۔یہی ایک روشن چراغ ہے جو عین سچائی کی راہیں دکھاتا ہے۔ بلا شبہ جن لوگوں کو راہ راست سے مناسبت اور ایک قسم کا رشتہ ہے اُن کا دل قرآن شریف کی طرف کھنچا چلا جاتا ہے اور خدائے کریم نے اُن کے دل ہی اس طرح کے بنا رکھے ہیں کہ وہ عاشق کی طرح اپنے اس محبوب کی طرف جھکتے ہیں اور بغیر اس کے کسی جگہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 382
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 382
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/382/mode/1up
    قرار نہیں پکڑ تے اور اس سے ایک صاف اور صریح بات سن کر پھر کسی دوسرے کی نہیں سنتے اس کی ہریک صداقت کو خوشی سے اور دوڑ کر قبول کرلیتے ہیں اور آخر وہی ہے جوموجب اشراق اور روشن ضمیری کا ہوجاتا ہے اور عجیب در عجیب انکشافات کا ذریعہ ٹھہرتا ہے اور ہر یک کو حسب استعداد معراج ترقی پر پہنچاتا ہے۔ راستبازوں کو قرآن کریم کے انوار کے نیچے چلنے کی ہمیشہ حاجت رہی ہے اور جب کبھی کسیؔ حالتِ جدیدہ زمانہ نے اسلام کوکسی دوسرے مذہب کے ساتھ ٹکرا دیا ہے تو وہ تیز اور کار گر ہتھیار جو فی الفور کام آیا ہے قرآن کریم ہی ہے۔ ایسا ہی جب کہیں فلسفی خیالات مخالفانہ طور پر شائع ہوتے رہے تو اس خبیث پودہ کی بیخ کنی آخر قرآن کریم ہی نے کی اور ایسا اس کو حقیر اور ذلیل کر کے دکھلا دیا کہ ناظرین کے آگے آئینہ رکھ دیا کہ سچا فلسفہ یہ ہے نہ وہ۔ حال کے زمانہ میں بھی جب اوّل عیسائی واعظوں نے سراُٹھایا اور بد فہم اورنادان لوگوں کو توحید سے کھینچ کر ایک عاجز بندہ کا پرستار بنانا چاہا اور اپنے مغشوش طریق کو سوفسطائی تقریروں سے آراستہ کر کے اُن کے آگے رکھ دیا اور ایک طوفان ملک ہند میں برپا کر دیا آخر قرآن کریم ہی تھا جس نے انہیں پسپا کیا کہ اب وہ لوگ کسی با خبر آدمی کو منہ بھی نہیں دکھلا سکتے اور اُن کے لمبے چوڑے عذرات کو ُ یوں الگ کر کے رکھ دیا جس طرح کوئی کاغذ کا تختہ لپیٹے۔ قرآن کریم نے اُن کے ایک بڑے بھارے عقیدہ کو جو کفّارہ کا عقیدہ تھا مَاقَتَلُوْہُ وَمَاصَلَبُوْہُ کا ثبوت دے کر معدوم کردیا۔ اور انسان کی نجات کے لئے وہ طبعی اور فطرتی طریقہ بتلایا جو آدم کی پیدائش سے ہر یک آدمی کیؔ جبلّت کو لازم ہے۔ اب وہ لوگ اس بات سے تو رہے کہ اپنا پُر ظلم اوربے اثر کفارہ عقلمند انسانوں کے سامنے پیش کرسکیں ہاں یہ ممکن ہے کہ اب جنات کی طرف جن کا وجود انجیل کی رُو سے ثابت ہے اس کفارہ کے لئے کوئی مشن بھیجیں کیونکہ ان کو توبھی تو خدائے تعالیٰ نے ہلاکت کے لئے پیدا نہیں کیا۔ مگرمشکل تو یہ ہے کہ یہ دروغ بے فروغ اسی حد تک بُنا گیا تھا کہ مسیح ابن مریم بنی آدم کے کفارہ کے لئے آیا ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 383
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 383
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/383/mode/1up
    اور ابن آدم کہلا کر اورآدمی کاہم جنس ہو کر اس کو یہ استحقاق بنی نوع کی ہمدردی کاپیدا ہوا ہے ہاں یہ ممکن ہے کہ یہ حجت پیش کی جائے کہ مسیح کا ایک اوربھائی تھا کہ جو ابن آدم نہیں بلکہ ابن جن کہلاتا تھا وہ جنات کے کفارہ کے لئے مصلو ب ہوا تھا۔ مگر پھر بھی انجیل کی رو سے کوئی ثبوت پیش کرنا پڑے گا۔
    ایسا ہی قرآن کریم نے ہندوؤں پر بھی بہت سی صداقتیں ظاہرکی ہیں اور وہ قیوم العالمین جس سے وہ بے خبر تھے ان کا انہیں پتہ دیا ہے اگر وہ لوگ اس صداقت کو قبول کرتے تو اس خدا کو دیکھ لیتے جس کی عظمت وقدرت سے وہ غافل ہیں۔ لیکن انہوں نے انگریزوں کے فلسفہؔ جدیدہ کو دیکھ کر فلسفی بننا چاہا۔ اور ہر یک چیز کے اسباب تلاش کرنا شروع کئے تا قرآن کریم کی حقانی فلاسفی کے ساتھ مقابلہ کریں۔ مگر یہ حرکت اُن کے لئے بڑی سرگشتگی کا موجب ہوئی اور یہاں تک نوبت پہنچی کہ انہوں نے اپنے اعتقادات اور اعمال کی نسبت جووید کی تعلیم کے رُو سے اُن کے ایمان میں داخل ہیں دو بُرے نمونے ظاہر کردئے۔اعتقاد کی نسبت یہ نمونہ کہ خدائے تعالیٰ کی خالقیت کی نسبت انکار کر کے اس کے وجود کے پتہ لگنے کی راہیں اپنے پر بند کردیں اور دنیا کے ذرّہ ذرّہ اور تمام ارواح کو خود بخود اور قدیم اور واجب الوجود سمجھ کر توحید کے اس دقیق راز کو چھوڑ دیا جس پر سچی معرفت اور سچا گیان اور سچی مکتی موقوف ہے اور اعمال کی نسبت یہ نمونہ کہ نیوگ کا ایک قابل شرم مسئلہ جو ویدوں میں چھپا ہوا چلا آتا تھا جس کے رو سے ایک شوہر دار عورت کسی آریہ کی اولاد حاصل کرنے کی غرض سے کسی غیر آدمی سے ہم بستر ہوسکتی ہے اپنی کتابوں میں شائع کیا۔ اگر ایسے اعتقاد کو ایک مختص الزمان قانون کی طرح سمجھتے تو شاید اس کی قباحت کسی قدر نرم ہوجاتی مگر اب تو یہ مسئلہ ہمیشہ کے لئے اور ہر زمانہ کےؔ لئے ایک غیر متبدّل قانون کی طرح سمجھاگیا ہے جو ویدوں کی طرح انادی چلا آیااور انادی ہی رہے گا۔ پس یہ قرآن کریم کی مخالفت کی سزا ہے جس کو ہم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 384
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 384
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/384/mode/1up
    انشاء اللہ القدیر براہین احمدیہ کے حصص باقیہ میں بتصریح و تفصیل بیان کریں گے۔سو اسی قرآن کریم نے حضرت مسیح کی وفات کے منکرین کو ایسی زک دی ہے کہ اب وہ ذراٹھہر نہیں سکتے اور اس جنگ میں نا سمجھ لوگوں نے ایسی شکست کھائی ہے کہ اس شکست کی کوفت عمر بھر انہیں نہیں بُھولے گی۔ غرض قرآن شریف دھکّے دے دیکر اُن کو اپنے دربار سے باہر نکال رہا ہے۔
    اب رہی حدیثیں سو سب سے اوّل یہ بات سوچنے کے لائق ہے کہ قرآن کریم کے مقابل پر حدیثوں کی کیا قدر اور منزلت ہے اور جب قرآن کریم کے نصوص بیّنہ سے کوئی حدیث مخالف پڑے تو کہاں تک اس کے اعتبار کو وزن دے سکتے ہیں۔
    سو جاننا چاہیئے کہ قرآن کریم وہ یقینی اور قطعی کلا م الٰہی ہے جس میں انسان کا ایک نقطہ یا ایک شعشہ تک دخل نہیں اور وہ اپنے الفاظ اور معانی کے ساتھ خدائے تعالیٰ کا ہی کلام ہے اور کسی فرقہ اسلام کو اس کے ماننےؔ سے چارہ نہیں۔ اس کی ایک ایک آیت اعلیٰ درجہ کا تواتر اپنے ساتھ رکھتی ہے وہ وحی متلو ہے جس کے حرف حرف گنے ہوئے ہیں وہ بباعث اپنے اعجاز کے بھی تبدیل اورتحریف سے محفوظ ہے۔ لیکن احادیث تو انسانوں کے دخل سے بھری ہوئی ہیں۔ جو ان میں سے صحیح کہلاتی ہیں اُن کا اتنا بھی مرتبہ نہیں جو ایک آیت کے مقابلہ پر ایک کروڑ اُن میں سے وہ رنگ اور شان پیدا کرسکے جو اللہ جلَّ شَانُہٗ کی بے مثل کلام کو حاصل ہے اگر چہ حدیث صحیح بھی جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے بہ سند متصل ثابت ہو ایک قسم کی وحی ہے مگر وہ ایسی تو نہیں جو قائم مقام قرآ ن شریف ہو سکے۔ اسی وجہ سے قرآن شریف کی جگہ صرف حدیث پڑھ کر نماز نہیں ہوسکتی۔ حدیثو ں میں ضعف کی وجوہات اس قدر ہیں کہ ایک دانا آ دمی اُن پرنظر ڈال کر ہمیشہ اس بات کا محتاج ہوتاہے کہ اُن کو تقویت دینے کے لئے کم سے کم نصِ قرآنی کا کوئی اشارہ ہی ہو۔ یہ سچ ہے کہ حدیثیں صحابہ کی زبان سے بتوسط کئی راویوں کے مؤلفین صحاح تک پہنچی ہیں اور یہ بھی سچ ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 385
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 385
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/385/mode/1up
    کہ جہاں تک ممکن ہے مؤلفین صحاح نے حدیثوں کی تنقید و تفتیش میں بڑی بڑیؔ کوششیں کی ہیں مگر پھر بھی ہمیں ان پر وہ بھروسا نہیں کرنا چاہیئے جواللہ جلّشانہ‘ کی کلام پر کیاجاتاہے کیونکہ وہ کئی واسطوں سے اور معمولی انسانوں کے ہاتھوں سے دست مال ہو کر آئمہ حدیث کو ملی ہیں۔ مثلًا ایک حدیث کا راوی عمر رضی اللہ عنہ ہے جوخلیفہ رسول اللہ اور رئیس الثقات ہے چونکہ چھ سات راوی درمیان میں ایسے ہیں جو اُن کا تزکیہ نفس اور کمال طہارت ثابت نہیں اور اُن کی راستبازی اورخداترسی اور دیانت گو سرسری نظر سے بطور حُسن ظن تسلیم کی گئی ہومگر بانکشاف تام کچھ ثابت نہیں سو وہ کیوں کر راستبازی میں حضرت عمر کے قائمقام سمجھے جائیں گے۔اور کیوں جائز نہیں کہ انہوں نے عمداً یا سہواً بعض احادیث کی تبلیغ میں خطا کی ہو۔ اسی نظر سے بعض اَئمہ نے احادیث کی طرف توجہ کم کی ہے جیساکہ امام اعظم کوفی رضی اللہ عنہ جن کو اصحاب الرائے میں سے خیال کیاگیا ہے اور ان کے مجتہدات کو بواسطہ وقت معانی احادیث صحیحہ کے برخلاف سمجھا گیا ہے۔ مگر اصل حقیقت یہ ہے کہ امام صاحب موصوف اپنی قوت اجتہادی اور اپنے علم اور درایت اور فہم و فراست میں اَئمہ ثلاثہ باقیہ سے افضلؔ واعلیٰ تھے اور اُن کی خداداد قوت فیصلہ ایسی بڑھی ہوئی تھی کہ وہ ثبوت عدم ثبوت میں بخوبی فرق کرنا جانتے تھے اور ان کی قوت مدرکہ کو قرآن شریف کے سمجھنے میں ایک خاص دستگاہ تھی اور اُن کی فطر ت کو کلام الٰہی سے ایک خاص مناسبت تھی اور عرفان کے اعلیٰ درجہ تک پہنچ چکے تھے۔ اسی وجہ سے اجتہاد واستنباط میں اُن کے لئے وہ درجہ علیا مسلّم تھا جس تک پہنچنے سے دوسرے سب لوگ قاصر تھے۔ سبحان اللہ اس زیرک اور ربّانی امام نے کیسی ایک آیت کے ایک اشارہ کی عزت اعلیٰ وارفع سمجھ کر بہت سی حدیثوں کو جو اس کے مخالف تھیں ردّی کی طرح سمجھ کر چھوڑ دیا اور جہلا کے طعن کا کچھ اندیشہ نہ کیا مگر افسوس کہ آج وہ زمانہ ہے کہ بے سروپا اقوال قرآن شریف پر مقدّم سمجھے جاتے ہیں اور ایک بے اصل لکیرکو اجماع کی صورت میں خیال کیاجاتاہے اور اگرچہ قرآن کریم کی نصوصِ بیّنہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 386
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 386
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/386/mode/1up
    کے سامنے حدیثوں کا ذکر کرنا ایسا ہے کہ جیسا آفتاب کے مقابل پر ِ کرم شب تاب کو پیش کیاجائے۔ مگر پھربھی ہمارے مخالفین کی سخت بے نصیبی ہے کہ اس قسم کی حدؔ یثیں بھی تو نہیں ملتیں جن سے یہ ثابت ہو کہ مسیح ابن مریم سچ مچ اسی جسم خاکی عنصری کے ساتھ آسمان کی طرف زندہ اٹھایا گیا۔ ہاں اس قسم کی حدیثیں بہت ہیں کہ ابن مریم آئے گا مگر یہ تو کہیں نہیں لکھاکہ وہی ابن مریم اسرائیلی نبی جس پر انجیل نازل ہوئی تھی جس کو قرآن شریف مار چکا ہے وہی زندہ ہو کر پھر آجائے گا۔ہاں یہ بھی سچ ہے کہ آنے والے مسیح کو نبی کرکے بھی بیان کیا گیا ہے مگر اس کو اُمّتی کر کے بھی تو بیان کیا گیا ہے بلکہ خبر دی گئی کہ اے اُمّتی لوگو وہ تم میں سے ہی ہوگا اور تمہارا امام ہو گا اور نہ صرف قولی طور پر اس کا امتی ہونا ظاہر کیا بلکہ فعلی طور پر بھی دکھلادیا کہ وہ امتی لوگوں کے موافق صرف قال اللہ وقال الرسول کا پیروہوگا اور حل مغلقات و معضلات دین نبوت سے نہیں بلکہ اجتہاد سے کرے گا اور نماز دوسروں کے پیچھے پڑھے گا۔ اب اِن تمام اشارات سے صاف ظاہر ہے کہ وہ واقعی اور حقیقی طورپر نبوت تامہ کی صفت سے متصف نہیں ہو گا۔ ہاں نبوت ناقصہ اُس میں پائی جائے گی جو دوسرے لفظوں میں محدثیت کہلاتی ہے اور نبوت تامّہ کی شانوں میں سے ایک شان اپنے اندر رکھتی ہے۔ سو یہ بات کہ اسؔ کو اُمّتی بھی کہا اورنبی بھی۔ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ دونوں شانیں اُمتیت اور نبوت کی اُس میں پائی جائیں گی جیسا کہ محدّث میں ان دونوں شانوں کا پایاجانا ضروری ہے لیکن صاحب نبوت تامّہ تو صرف ایک شان نبوت ہی رکھتا ہے۔ غرض محدثیت دونوں رنگوں سے رنگین ہوتی ہے اِسی لئے خدائے تعالیٰ نے براہین احمدیہ میں بھی اس عاجز کا نام اُمتی بھی رکھااور نبی بھی۔ اور یہ بھی سوچنا چاہیئے کہ جب اسرائیلی نبی مسیح ابن مریم فوت ہوچکا اور پھر اس کے زندہ ہوجانے کا کہیں قرآ ن شریف میں ذکر نہیں تو بجُز اس کے اور کیا سمجھ میں آسکتا ہے کہ یہ آنے والا ابن مریم اَور ہی ہے۔ بعض کہتے ہیں کہ کیا خدائے تعالیٰ قادر نہیں کہ مسیح ابن مریم کو زندہ کر کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 387
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 387
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/387/mode/1up
    بھیج دے۔ میں کہتاہوں کہ اگر صرف قدرت کو دیکھنا ہے اور نصوص قرآنیہ سے کچھ غرض نہیں تو ظاہر ہے کہ قدرت خدائے تعالیٰ کی دونوں طور سے متعلق ہے چاہے تو زندہ کرکے بھیج دے اور چاہے توؔ ہرگز زندہ نہ کرے اورنہ دنیا میں بھیجے۔اور دیکھنا تو یہ چاہیئے کہ اِن دونوں طور کی قدرتوں میں سے اُس کے منشاء کے موافق کونسی قدرت ہے۔ سو ادنیٰ سوچ سے ظاہر ہوگا کہ یہ قدرت کہ جس کو ایک دفعہ مار دیا پھر خواہ نخواہ دوموتوں کا عذاب اس پر نازل کرے ہرگز اس کے منشاء کے موافق نہیں جیسا کہ وہ خود اس بارہ میں فرماتا ہے۔333 ۱؂ ۔ یعنی جس کو ایک دفعہ مار دیا پھر اُس کو دنیا میں نہیں بھیجے گا اور جیسا کہ صرف ایک موت کی طرف اشارہ کر کے فرماتا ہےٰ33 ۲؂ سو یہ بات اس کے سچے وعدہ کے برخلاف ہے کہ مُردوں کو پھر دنیا میں بھیجنا شروع کر دیوے۔ اور کیوں کر ممکن تھا کہ خاتم النبیین کے بعد کوئی اور نبی اسی مفہوم تام اور کامل کے ساتھ جو نبوت تامّہ کی شرائط میں سے ہے آسکتا۔ کیا یہ ضروری نہیں کہ ایسے نبی کی نبوت تامہ کے لوازم جو وحی اور نزول جبرئیل ہے اس کے وجود کے ساتھ لازم ہونی چاہیئے کیونکہ حسب تصریح قرآن کریم رسول اُسی کو کہتے ہیں جس نے احکام و عقائد دین جبرئیل کے ذریعہ سے حاصل کئے ہوں لیکن وحی نبوت پر تو تیرہ سو برس سے مہر لگ گئی ہے کیا یہ مہر اُس وقت ٹوٹ جائے گی۔ اور اگر کہو کہ مسیح ابن مریم نبوتؔ تامہ سے معزول کرکے بھیجا جائے گا تو اس سزا کی کوئی وجہ بھی توہونی چاہیئے۔ بعض کہتے ہیں کہ اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ بے استحقاق معبود قرار دیا گیا تھا سوخدائے تعالیٰ نے چاہا کہ اس کی سزا میں نبوت سے اس کو الگ کر دیاجائے اور وہ زمین پر آکر دوسروں کے پیرو بنیں اَوروں کے پیچھے نماز پڑھیں اور امام اعظم کی طرح صرف اجتہاد سے کام لیں۔ اور حنفی الطریق ہو کر حنفی مذہب کی تائید کریں۔ لیکن یہ جواب معقول نہیں ہے خدائے تعالیٰ نے قرآن کریم میں اس الزام سے اُن کوبری کر دیا ہے اور ان کی نبوت کو ایک دائمی نبوت قرار دیا ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 388
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 388
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/388/mode/1up
    بھائیو! کیوں کھسیانے بن کر بیہودہ باتیں کرتے ہو اور ناحق اپنے ذمہ گناہ لیتے ہو۔ خدائے تعالیٰ قرآن کریم میں اُس مسیح ابن مریم کو مار چکا جو اسرائیلی نبی تھا جس پر انجیل نازل ہوئی تھی۔اب یہ لفظ اپنے گھر سے حدیثوں میں زیادہ مت کرو کہ وہی مسیح فوت شدہ پھر آئے گا۔ اے خدا کے بندو کچھ تو خدا سے ڈرو۔کیاخدائے تعالیٰ آپ کے نزدیک اس بات پر قادر نہیں کہ وہ اپنے ایک بندہؔ میں ایک ایسی روح ڈال دیوے جس سے وہ ابن مریم کے روپ میں ہی ہوجائے کیا اس کی مثالیں خدائے تعالیٰ کی کتابوں میں نہیں کہ اس نے ایک نبی کا نام دوسرے پرر کھ دیا کیا حدیثوں میں یہ مذکور نہیں کہ مثیل ابن مریم وغیرہ اس اُمّت میں پیدا ہوں گے تو پھر جب قرآن مسیح ابن مریم کو مارتا ہے اورحدیثیں مثیل ابن مریم کے آنے کا وعدہ دیتی ہیں تو اس صورت میں کیا اشکال باقی رہا۔ کیا اس میں کچھ جھوٹ ہے کہ جو ابن مریم کی سیرت رکھتا ہے وہ ابن مریم ہی ہے ۔
    درآں ابن مریم خدائی نبود
    زموت و زفوتش رہائی نبود
    رہا کرد خود راز شرک و دوئی
    توہم کن چنیں ابن مریم توئی
    اے مولوی صاحبان فضولی کو چھوڑو اور مجھے کوئی ایک ہی حدیث ایسی دکھلاؤ کہ جو صحیح ہو اور جو مسیح کا خاکی جسم کے ساتھ زندہ اٹھایا جانا اور اب تک آسمان پر زندہ ہونا ثابت کرتی ہو اور تواتر کی حد تک پہنچی ہو اور اس مقدار ثبوت تک پہنچ گئی ہوجو عند العقل مفید یقین قطعی ہوجاوے اور صرف شک کی حد تک محدود نہ رہے آپ جانتے ہیں کہ قرآن کریم کی تمام آیات بیّنہ کیسی مفید یقین ہیں۔اب جبکہ ہمارا دعویٰ مبنی برنصوص بیّنہؔ قرآنیہ ہے اور اس کی تائید میں صحیح حدیثیں بھی ہمارے پاس ہیں اور ایسا ہی اقوال سلف و خلف بھی ہماری تائید میں کچھ تھوڑے نہیں اور الہامی شہادت اِن سب کے علاوہ ہے سو اب تم انصاف کے ترازو لے کربیٹھ جاؤ اور ایک پلّہ میں اپنے خیالات رکھو اور دوسرے پلّہ میں ہماری یہ سب وجوہات۔اور آپ ہی انصاف کرلو۔ خوب سوچ لو کہ اگر ہمارے پاس صرف نصوص قرآن کریم ہی ہوتیں تو فقط وہی کافی تھیں۔ اب جس حالت میں بعض حدیثیں بھی ان
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 389
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 389
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/389/mode/1up
    نصوص کے مطابق ہوں تو پھر گویا وہ یقین نورٌ علٰی نور ہے جس سے عمدًا انحراف ایک قسم کی بے ایمانی میں داخل ہے۔ اور کچھ شک نہیں کہ جو حدیثیں اس اعلیٰ درجہ کے ثبوت کے برخلاف ہوں گی تو اگر ہم اُن کو غلط نہ کہیں اور نہ اُن کا موضوع نام رکھیں تو زیادہ سے زیادہ نرمی ہماری اُن حدیثوں کی نسبت یہ ہو گی کہ ہم اُن کی تاویل کریں۔ ورنہ حق ہمارا تو یہی ہے کہ اُن کو قطعی طور پر ساقط الاعتبار سمجھیں۔بعض یہ وہم پیش کرتے ہیں کہ قرآن شریف میں موت مسیح کے بارے میں صرف توفی کالفظ موجود ہے مگر لُغت میں یہ لفظ کئی معنوں پر آیا ؔ ہے۔سو اس وہم کا جواب یہ ہے کہ کلام تو اِس بات میں ہے کہ یہ لفظ قرآن کریم میں کئی معنوں پر آیا ہے یا ایک معنی پر۔ دراصل بات یہ ہے کہ قرآن کریم نے بعض الفاظ لغت سے لے کر اصطلاحی طور پر ایک معنی کے لئے خاص کردئے ہیں۔ جیسے صوم صلٰوۃ رحمانیّت رحیمیّت توفی۔ اور ایسا ہی اللہ کا لفظ۔اورکئی اَور الفاظ۔ سو اصطلاحی امر میں لغت کی طرف رجوع کرنا حماقت ہے۔ قرآن شریف کی قرآن شریف سے ہی تفسیر کرو اور دیکھو کہ وہ ایک ہی معنیٰ کا التزام رکھتا ہے یا متفرق معنی لیتا ہے۔ اور اقوال سلف و خلف درحقیقت کوئی مستقل حجت نہیں اور اُن کے اختلاف کی حالت میں وہ گروہ حق پر ہو گا جن کی رائے قرآن کریم کے مطابق ہے۔اگر یہ اقوال رطب ویابس جو تفسیروں میں لکھے ہیں کچھ استحکام رکھتے تو اِن تفسیروں میں اقوال متضادہ کیوں درج ہوتے۔ اگرماخذ اجماع کا یہی اقوال متضادہ ہیں تو حقیقت ا جماع معلوم شد۔
    اب ہم اس وصیت میں یہ دکھانا چاہتے ہیں کہ قرآن شریف اپنے زبردست ثبوتو ں کے ساتھ ہمارے دعوے کا مصدّق اور ہمارؔ ے مخالفین کے اوہام باطلہ کی بیخ کنی کررہا ہے اور وہ گذشتہ نبیوں کے واپس دنیا میں آنے کا دروازہ بندکرتا ہے۔ اور بنی اسرائیل کے مثیلوں کے آنے کا دروازہ کھولتا ہے۔ اُسی نے یہ دعاتعلیم فرمائی ہے ۔اس دعا کا ما حصل کیا ہے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 390
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 390
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/390/mode/1up
    یہی تو ہے کہ ہمیں اے ہمارے خدا نبیوں اور رسولوں کا مثیل بنا۔اور پھر حضرت یحییٰ کے حق میں فرماتا ہے3 ۱؂ یعنی یحییٰ سے پہلے ہم نے کوئی اس کا مثیل دنیا میں نہیں بھیجا جس کو باعتبار ان صفات کے یحییٰ کہاجائے یہ آیت ہماری تصدیق بیان کے لئے اشارۃ النص ہے۔ کیونکہ خدائے تعالیٰ نے اس جگہ آیت موصوفہ میں قبل کی شرط لگائی بعد کی نہیں لگائی تامعلوم ہو کہ بعد میں اسرائیلی نبیوں کے ہم ناموں کے آنے کا دروازہ کھلا ہے جن کانام خدائے تعالیٰ کے نزدیک وہی ہوگاجو اُن نبیوں کا نام ہوگاجن کے وہ مثیل ہیں یعنی جو مثیل موسیٰ ہے اس کانام موسیٰ ہوگا اور جو مثیل عیسیٰ ہے اس کا نام عیسیٰ یا ابن مریم ہوگا۔ اور خدائے تعالیٰ نے اس آیت میں ِ َسمی کہا مثیل نہیں کہا تا معلوم ہوکہ اللہ تعالیٰ کا منشاء یہ ہے کہ جو شخص کسی اسرائیلی نبی کا مثیل بن کر آئے گا وہ مثیل کے نام سے نہیںؔ پکاراجائے گا بوجہ انطباق کلّی اسی نام سے پکارا جائے گا جس نبی کا وہ مثیل بنکر آئے گا۔
    اور مسیح ابن مریم کی وفات کے بارہ میں اگر خدائے تعالیٰ قرآن شریف میں کسی ایسے لفظ کو استعمال کرتا جس کو اس نے مختلف معنوں میں استعمال کیا ہوتا تو کسی خائن کو خیانت کرنے کی گنجائش ہوتی۔سوخیانت پیشہ لوگوں کا خداتعالیٰ نے ایسا بندوبست کیا کہ توفّی کے لفظ کو جو حضرت عیسیٰ کی وفات کے لئے استعمال کیا گیا تھا پچیس جگہ پر ایک ہی معنی پر استعمال کیا اور اس کو ایک اصطلاحی لفظ بنا کر ہریک جگہ میں اس کے یہ معنے لئے ہیں کہ روح کو قبض کر لینا اور جسم کو بے کار چھوڑ دینا۔تا یہ لفظ اس بات پر دلالت کرے کہ روح ایک باقی رہنے والی چیز ہے جو بعد موت اور ایسا ہی حالت خواب میں بھی خدائے تعالیٰ کے قبضہ میں آجاتی ہے اور جسم پر فنا طاری ہوتی ہے مگر روح پر نہیں۔ اور چونکہ یہی معنی بالالتزام ہریک محل میں جہاں توفی کا لفظ آیا ہے لئے گئے اوران سے خروج نہیں کیاگیا اس لئے یہ معنے نصوص صریحہ بیّنہ ظاہرہ قرآن کریم میں سے ٹھہر گئے جن سے انحراف کرنا الحاد ہوگا کیونکہ یہ مسلّم ہے کہ النصوص یحمل علٰی ظواھرھا۔ پس قرآن کریم نے توؔ فّی
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 391
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 391
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/391/mode/1up
    کے لفظ کو جو محل متنازعہ فیہ میں یعنی مسیح کی وفات کے متعلق ہے تیئیس جگہ ایک ہی معنوں پراطلاق کر کے ایسا کھو ل دیا ہے کہ اب اس کے ان معنوں میں کہ روح قبض کرنا اور جسم کو چھوڑ دینا ہے ایک ذرہ شک و شبہ کی جگہ نہیں رہی۔ بلکہ یہ اول درجہ کے بیّنات اور مطالب صریحہ ظاہرہ بدیہہ میں سے ہوگیا جس کو قطع اور یقین کا اعلیٰ مرتبہ حاصل ہے جس سے انکار کرنا بھی اول درجہ کی نادانی ہے۔
    اب قرآن کریم میں اس لفظ کی تشریح کرنے میں صرف دو سبیل ہیں تیسرا کوئی سبیل نہیں۔
    (۱) دائمی طورپر روح کو قبض کرکے جسم کو بیکار چھوڑدینا۔ جس کا دوسرے لفظوں میں اِمَاتَت نام ہے یعنی مار دینا۔
    (۲) دوسرے کچھ تھوڑی مدّت کے لئے روح کا قبض کرنا اور جسم کو بیکار چھوڑ دینا۔ جس کا دوسرے لفظوں میں اِنَامَت نام ہے۔ یعنی سُلا دینا۔ لیکن ظاہرہے کہ محل متنازعہ فیہ سے دوسرے قسم کے معنے کو کچھ تعلق نہیں۔ کیونکہ سونا اور پھر جاگ اُٹھنا ایک معمولی بات ہے۔ جب تک انسان سویا رہا روح اس کی خدائے تعالیٰ کے قبضہ میں رہی اورجب جاگ اُٹھا تو پھرروح اس جسم میں آگئی جو بطور بیکارچھوڑا گیاؔ تھا۔ یہ بات صفائی سے سمجھ میں آسکتی ہے کہ جبکہ توفّی کے لفظ سے صرف روح کاقبضہ میں کر لینا مراد ہے بغیر اس کے جو جسم سے کچھ سروکار ہو بلکہ جسم کابیکار چھوڑدینا توفی کے مفہوم میں داخل ہے تو اس صورت میں اس سے بڑھ کر اَور کوئی حماقت نہیں کہ توفی کے یہ معنے کئے جائیں کہ خدائے تعالیٰ جسم کو اپنے قبضہ میں کرلیوے کیونکہ اگر یہ معنے صحیح ہیں تو نمونہ کے طور پر قرآن کریم کے کسی اور مقام میں بھی ایسے معنے ہونے چاہیئیں مگر ابھی ہم ظاہر کرچکے ہیں کہ قرآن کریم اول سے آخر تک صرف یہی معنے ہریک جگہ مراد لیتا ہے کہ روح کو قبض کرلینا اورجسم سے کچھ تعلق نہ رکھنا بلکہ اِس کو بیکار چھوڑ دینا۔ مگر فرض کے طورپر اگر مسیح ابن مریم کے محل وفات میں دوسرے معنے مراد لیں تو اُن کا ماحصل یہ ہو گاکہ مسیح کچھ مدّت تک سویا رہااور پھرجا گ اُٹھا۔پس اس سے تو
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 392
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 392
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/392/mode/1up
    ثابت نہ ہوسکاکہ جسم آسمان پر چلا گیا۔ کیاجولوگ رات کو یا دن کوسوتے ہیں تو اُن کا جسم آسمان پر چلا جایا کرتا ہے۔ سونے کی حالت میں جیساکہ ابھی میں بیان کر چکا ہوں صرف تھوڑی مدّت تک روح قبض کرلی جاتی ہے جسم کے اٹھائے جانے سے اس کو علاؔ قہ ہی کیاہے۔ ابھی میں بیان کر چکا ہوں کہ نصوص ظاہرہ متواترہ صریحہ قرآن کریم نے توفّی کے لفظ کو صرف روح تک محدود رکھا ہے یعنی روح کو اپنے قبضہ میں کرلینا اورجسم کوبیکار چھوڑ دینا۔ اور جبکہ یہ حال ہے تو پھر توفّی کے لفظ سے یہ نکالنا کہ گویاخدائے تعالیٰ نے نہ صرف مسیح ابن مریم کی روح کو اپنی طرف اٹھایا بلکہ اس کے جسم عنصری کو بھی ساتھ ہی اٹھالیا۔ یہ کیساسخت جہالت سے بھراہوا خیال ہے جو صریح اوربدیہی طورپر نصوص بیّنہ قرآن کریم کے مخالف ہے۔قرآن کریم نے نہ ایک بار نہ دوبار بلکہ پچیس بار فرما دیا کہ توفّی کے لفظ سے صرف قبض روح مراد ہے جسم سے کچھ غرض نہیں۔پھراگر اب بھی کوئی نہ مانے تو اس کو قرآن کریم سے کیا غرض۔ اس کو تو صاف یہ کہنا چاہیئے کہ میں اپنے چند موہومی بزرگوں کی لکیر کو کسی حالت میں چھوڑنانہیں چاہتا۔
    پھر قرآن کریم کے بعد حدیثوں کامرتبہ ہے سوتقریبًا تمام حدیثیں تصریح کے ساتھ قرآن کریم کے بیان کے موافق ہیں اور ایک بھی ایسی حدیث نہیں جس میں یہ لکھاہوکہ وہی مسیح ابن مریم اسرائیلی نبیؔ جس کو قرآن شریف مارچکا ہے جس پر انجیل نازل ہوئی تھی پھر دنیامیں آئے گا۔ ہاں بار بار لکھاہے کہ ان اسرائیلی نبیوں کے ہم نام آئیں گے۔ سچ ہے کہ حدیثوں میں درج ہے کہ ابن مریم آئے گا لیکن انہیں حدیثو ں نے حلیہ میں اختلاف ڈا ل کر اور آنے والے ابن مریم کو اُمتی ٹھہرا کر صاف بتلادیا ہے کہ یہ ابن مریم اَور ہے۔ اورپھر اگر اس قسم کی حدیثوں کی تشریح کے لئے جو متنازعہ فیہ ہیں دوسری حدیثوں سے مدد لینا چاہیں تو پھر کوئی ایسی حدیث نہیں ملتی جس سے یہ ثابت ہوکہ گذشتہ نبیوں میں سے کبھی کوئی نبی بھی دنیا میں آئے گا۔ ہاں یہ ثابت ہوتا ہے کہ اُن کے مثیل آئیں گے اور
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 393
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 393
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/393/mode/1up
    انہیں کے اسم سے موسوم ہوں گے۔
    اور یہ بات ہم کئی مرتبہ لکھ چکے ہیں کہ خاتم النبیّین کے بعدمسیح ابن مریم رسول کا آنا فساد عظیم کاموجب ہے اس سے یاتو یہ ماننا پڑے گا کہ وحی نبوت کا سلسلہ پھر جاری ہوجائے گا اور یا یہ قبول کرنا پڑے گا کہ خدائے تعالیٰ مسیح ابن مریم کو لوازم نبوت سے الگ کر کے اورمحض ایک اُمّتی بنا کر بھیجے گا اور یہ دونوں صورتیں ممتنع ہیں۔
    اس جگہ یہ بیان کرنا بھی بے جا نہ ہوگا کہ جس حالت میں تقریبًا کل حدؔ یثیں قرآن شریف کے مطابق اور ہمارے بیان کی مؤید ہیں۔ پھراگر بطور شاذونادر کوئی ایسی حدیث بھی ہو جو اس مجموعہ یقینیہ کے مخالف ہو تو ہم ایسی حدیث کو یا تو نصوص میں سے خارج کریں گے اوریا اس کی تاویل کرنی پڑے گی۔کیونکہ یہ توممکن نہیں کہ ایک ضعیف اورشاذ حدیث سے وہ مستحکم عمارت گرا دی جائے جس کو نصوص بیّنہ فرقانیہ و حدیثیہ نے طیارکیا ہے بلکہ ایسی حدیث اُن کے معارض ہوکر خود ہی گرے گی یا قابل تاویل ٹھہرے گی۔ ہریک عاقل سمجھ سکتا ہے کہ ایک خبر واحد غایت کارمفید ظن ہے۔ سو وہ یقینی اور قطعی ثبوت کو کچھ بھی نقصان نہیں پہنچاسکتی۔ بہت سی حدیثیں مسلم اور بخاری کی ہیں جو امام اعظم صاحب نے جو رئیس الائمہ ہیں قبول نہیں کیں۔بعض حدیثوں کو شافعی نے نہیں لیا۔ بعض حدیثوں کوجو نہایت صحیح سمجھی جاتی ہیں امام مالک نے چھوڑ دیا۔ بعض محدثین نے لکھا ہے کہ مسیح موعود جب دنیا میں آئے گا تواکثر استدلال اس کا قرآن شریف سے ہو گا اوربعض ایسی حدیثوں کو چھوڑ دے گا جن پر علماءِ وقت کا پختہ یقین ہوگا اور مجدّد الف ثانی صاحب اپنے مکتوبات کی مجلد ثانی مکتوب پنجاہ وپنجم میں لکھتے ہیںؔ کہ مسیح موعود جب دنیا میںآئے گاتو علماءِ وقت کے بمقابل اس کے آمادہ مخالفت کے ہوجائیں گے۔کیونکہ جو باتیں بذریعہ اپنے استنباط اور اجتہادکے وہ بیان کرے گا وہ اکثر دقیق اورغامض ہوں گی اوربوجہ دِقّت اورغموض ماخذ کے ان سب مولویوں کی نگاہ میں کتاب اورسُنت کے برخلاف نظرآئیں گی حالانکہ درحقیقت برخلاف
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 394
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 394
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/394/mode/1up
    نہیں ہوں گی۔دیکھو صفحہ نمبر ۱۰۷ مکتوبات امام ربّانی مطبوعہ احمدی دہلی۔
    سو اب اے بھائیو! برائے خدا دھکہ اورزبردستی مت کرو ضرور تھا کہ میں ایسی باتیں پیش کرتا جن کے سمجھنے میں تمہیں غلطی لگی ہوئی تھی۔اگر تم پہلے ہی راہ صواب پرہوتے تو میرے آنے کی ضرورت ہی کیا تھی۔میں کہہ چکا ہوں کہ میں اس اُمّت کی اصلاح کے لئے ابن مریم ہوکر آیا ہوں اور ایسا ہی آیاہوں کہ جیسے حضرت مسیح ابن مریم یہودیوں کی اصلاح کے لئے آئے تھے۔ میں اسی وجہ سے تو اُن کا مثیل ہوں کہ مجھے وہی اوراُسی طرز کا کام سپُردہوا ہے جیسا کہ انہیں سپرد ہواتھا۔ مسیح نے ظہور فرما کر یہودیوں کو بہت سی غلطیوں اوربے بنیاد خیالات سے رہائی دی تھی۔ منجملہ اس کے ایک یہ بھی تھا کہ یہودی لوگ ایلیا نبی کےؔ دوبارہ دنیا میں آنے کی ایسی ہی اُمید باندھے بیٹھے تھے جیسے آج کل مسلمان مسیح ابن مریم رسول اللہ کے دوبارہ آنے کی امید باندھے بیٹھے ہیں۔ سو مسیح نے یہ کہہ کر کہ ایلیانبی اب آسمان سے اُتر نہیں سکتا زکریا کابیٹا یحییٰ ایلیا ہے جس نے قبول کرنا ہے کرے اس پُرانی غلطی کو دُور کیا اور یہودیوں کی زبان سے اپنے تئیں مُلحد اورکتابوں سے پھرا ہوا کہلایا مگرجوسچ تھا وہ ظاہر کردیا۔ یہی حال اُس کے مثیل کا بھی ہوا اور حضرت مسیح کی طرح اس کو بھی مُلحد کا خطاب دیاگیا۔ کیا یہ اعلیٰ درجہ کی مماثلت نہیں۔
    اس باریک نکتہ کو یادرکھو کہ مسلمانوں کو یہ کیوں خوشخبری دی گئی کہ تم میں مسیح ابن مریم نازل ہوگا۔دراصل اس میں بھید یہ ہے کہ ہمارے سیّد ومولیٰ حضرت خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم مثیل موسیٰ علیہ السلام ہیں اور یہ اُمّت محمدیہ مثیل اُمّت بنی اسرائیل ہے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے خبر دی تھی کہ آخری زمانہ میں یہ اُمّت ایسی ہی بگڑجائیگی جیسے یہودی اپنے آخری وقت میں بگڑ گئے تھے اورحقیقی نیکی اور حقیقی سچائی اور حقیقی ایمانداری اُن میں سے اُٹھ گئی تھی اور نکمّے اور بے اصل جھگڑؔ ے اُن میں برپاہوگئے تھے اور ایمانی محبت ٹھنڈی ہوگئی تھی اورفرمایا کہ تم تمام وہی کام کروگے جویہودیوں نے کئے۔یہاں تک
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 395
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 395
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/395/mode/1up
    کہ اگریہودی سوسمار کے سوراخ میں داخل ہوئے ہیں تو تم بھی اُسی سوراخ میں داخل ہوگے۔ یعنی پورے پورے یہودی ہوجاؤ گے۔ اورچونکہ یہودیوں کی اس تباہ حالت میں خدائے تعالیٰ نے انہیں فراموش نہیں کیا تھا بلکہ اُن کے اخلاق واعمال درست کرنیکے لئے اور اُن کی غلطیوں کی اصلاح کرنے کی غرض سے مسیح ابن مریم کو انہیں میں سے بھیجا تھا لہٰذا اس اُمت کو بھی بشارت دی گئی کہ جب تمہاری حالت بھی اُن سخت دل یہودیوں کے موافق ہوجائے گی اورتم بھی ظاہر پرست اوربد چلن اور رُوبدُنیا ہوجاؤ گے اورتمہارے فقراء اورعلماء اور دنیاداروں میں اپنی اپنی طرز پر مکاری اور بدچلنی پھیل جائے گی اور وہ شے جس کا نام توحید اورخداپرستی اورخداترسی اور خداخواہی ہے بہت ہی کم رہ جائے گی تو مثالی طورپر تمہیں بھی ایک ابن مریم تم میں سے دیا جائے گا تا تمہاری اخلاقی اورعملی اورایمانی حالت کے درست کرنے کے لئے ایسا ہی زور لگا وے جیسا کہ مسیح ابن مریم نے لگایا تھا۔
    اب صاف اور نہایت کُھلاکُھلاقرینہ ہے کہ چونکہ اس زمانہ کے مسلماؔ ن دراصل یہودی نہیں ہیں بلکہ انہوں نے اپنی سخت دلی اوردنیا پرستی کی وجہ سے یہودیوں سے ایک مشابہت پیداکرلی ہے اس لئے جو مسیح ابن مریم اُن کے لئے نازل ہوا وہ بھی دراصل مسیح ابن مریم نہیں ہے بلکہ اپنے اس منصبی کام میں جو اس کے سپرد ہوا ہے مسیح سے مماثلت رکھتا ہے۔
    یقیناًسمجھو کہ مسیح ابن مریم رسول اللہ فو ت ہو چکا اور خدا تعالیٰ نے اس کوفوت ہونے کے بعد اُسی قسم کی زندگی بخشی جووہ ہمیشہ نبیوں اور صدیقوں اور شہیدوں کو بخشتا آیا ہے۔ سو وہ خدائے تعالیٰ کی طرف ایک پاک اور لطیف زندگی کے ساتھ جو جسم خاکی اور اُس کے لوازم کثیفہ اور مکدّرہ سے منزّہ ہے اُٹھایا گیا اور اسی قسم کے زندوں کی جماعت میں جاملا۔ اگر وہ جسم خاکی کے ساتھ اُٹھایا جاتا تو اس خاکی جسم کے لوازم بھی اُس کے ساتھ رہتے۔ کیونکہ اللہ جلَّ شَانُہٗ فرماتاہے کہ ہم نے کوئی ایسا جسد خاکی نہیں بنایا کہ وہ زندہ تو ہو مگر روٹی نہ کھاتا ہو۔ لیکن آپ لوگ مانتے ہیں کہ اب مسیح ابن مریم کا جسم
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 396
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 396
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/396/mode/1up
    آسمان پرایسا ہے کہ اُس میں خاکی جسم کے لوازم ہرگز نہیں پائے جاتے۔ وہ بڈھا نہیں ہوتاؔ اُس پر زمانہ اثر نہیں کرتا۔ وہ اناج اور پانی کا محتاج نہیں۔ سو آپ نے تو ایک طور سے مان بھی لیا کہ وہ اوررنگ اور شان کا جسم ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ معراج کی رات میں جو ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے آسمانوں پر نبیوں کو دیکھا تو کیا بالخصوص مسیح کو ہی جسم کے سمیت دیکھا اور دوسروں کی فقط روحیں دیکھیں بلکہ ظاہر ہے کہ سب کو روح اور جسم دونوں کے ساتھ دیکھا اور سب کا جسمانی حلیہ بھی بیان کیا اور مسیح کا وہ حلیہ بیان کیا جو آنے والے مسیح سے بالکل مخالف تھا۔ پس کیا یہ قوی دلیل اس بات پر نہیں ہے کہ مسیح کو اس کے مرنے کے بعد اُسی رنگ اور طرز کا جسم ملا جو یحییٰ نبی اور ادریس اور یوسف اور حضرت موسیٰ اور حضرت ابراہیم کو ملا تھا۔ کیا کوئی نرالی بات مسیح میں دیکھی گئی جو اَوروں میں نہیں تھی۔ اب جبکہ ایسی وضاحت سے مسیح کا وفات پاجانا اور پھر دوسرے نبیوں اور صدیقوں اور شہیدوں کی طرح زندہ ہو کر آسمان کی طرف اُٹھائے جانا ثابت ہوتا ہے تو کیوں ناحق مسیح کے سفلی اور کثیف جسم اورناپائدار حیات کے لئے ضد کی جاتی ہے اور سب کے لئے ایک موت اور اس کے لئے دو موتیں روا رکھی جاتی ہیں۔ قرآن شریف میں ادریس ؑ نبیؔ کے حق میں ہے وَ3 ۱؂ ۔ اور اس کے ساتھ توفّی کا کہیں لفظ نہیں تاہم علماء ادریس ؑ کی وفات کے قائل ہیں اور کہتے ہیں کہ وہ اس جہان سے ایسا اٹھایا گیا کہ پھر نہیں آئے گا یعنی مرگیا کیونکہ بغیر مرنے کے کوئی اس جہان سے ہمیشہ کے لئے رخصت نہیں ہوسکتا۔ وجہ یہ کہ اس دنیا سے نکلنے اور بہشت میں داخل ہونے کا موت ہی دروازہ ہے۔ 33 ۲؂۔ اور اگر انہیں کہا جائے کہ کیا ادریس آسمان پر مر گیا یا پھرآکر مرے گا یا آسمان پر ہی اس کی روح قبض کی جائے گی تو ادریس ؑ کے دوبارہ دنیا میں آنے سے صاف انکار کرتے ہیں۔اور چونکہ دخول جنت سے پہلے موت ایک لازمی امر ہے لہٰذا ادریس کا فوت ہوجانا مان لیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 397
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 397
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/397/mode/1up
    رفع کے اس جگہ معنے موت ہی ہیں۔ پھر جبکہ مسیح کے رفع کے ساتھ توفّی کا لفظ بھی موجود ہے تو کیوں اور کس دلیل سے اس کی حیات کے لئے ایک شور قیامت برپا کر دیا ہے۔ افسو س کہ اس وقت کے مولوی جب دیکھتے ہیں کہ قرآن کریم مسیح ابن مریم کو مار چکا ہے اور کوئی حدیث صحیح اس کے منافی ومغائر نہیں تو لاچار ہوکر اجماع کی طرف دوڑتے ہیں۔ ہر چند اِن لوگوں کوبار بار کہاجاتاہے کہ حضرات اجماع کا لفظ پیشگوئیوں کے متعلق ہرگز نہیں ہو سکتا۔ قبل از ظہور ایک نبی کی اجتہادی تاویل میں بھی غلطی ممکن ہے۔ لیکن یہ لوگ نہیں مانتے اور یہ بھی نہیں جانتے کہ اجماع کی بناء یقین اور انکشاف کلّی پر ہوا کرتی ہے لیکن سلف و خلف کے ہاتھ میں جن کی طرف اجماع کا دعویٰ منسوب کیا جاتاہے نہ یقین کلّی تھا نہ انکشاف تام۔ اگر ان کے خیالات کی بناء ایک کامل یقین پر ہوتی تو اُن سے اقوال متفرقہ صادر نہ ہوتے۔ اور تفسیر کی کتابوں میں زیر تفسیر آیت یٰعیسیؔ انّی متوفیک چھ چھ سات سات اقوال متضادہ نہ لکھے جاتے بلکہ ایک ہی شق مسلّم کو مانتے چلے آتے اور اگر انکشاف تام اُ ن کے نصیب ہوتا تو وہ بحوالہ قرآ ن کریم واحادیث صحیحہ ضرور لکھتے کہ آنے والا مسیح ابن مریم دراصل وہی مسیح ابن مریم رسول اللہ ہے جس پر انجیل نازل ہوئی تھی جو اسرائیلی نبی تھا۔ بلکہ انہوں نے اس مقام کی تصریح میں دم بھی نہیں مارا اور اصل حقیقت کو حوالہ بخدا کر کے گذر گئے جیسا کہ صلحاء کی سیرت ہوتی ہے۔ یہاں تک کہ وہ زمانہ آگیا جو خدا تعالیٰ نے وہ اصل حقیقت اپنے ایک بندہ پر کھول دی اور جو راز مخفی چلا آتا تھا اس پر ظاہر کردیا تاا س کے حق میں یہ خارق عادت تفہیم جس کے دریافت سے تمام علماء کی عقلیں قاصر رہیں ایک کرامت میں شمار کی جائے۔ وذٰلک فضل اللّٰہ یؤتیہ من یشآء۔
    سو اے بھائیو! برائے خدا جلدی مت کرو اور اپنے علم اور فراست پر داغ مت لگاؤ یقینًا سمجھوکہ گریز کی تمام راہیں بند ہیں اور انکار کے تمام طرق مسدود ہیں۔ اگر یہ کاروبار انسان کی طرف سے ہوتایا اگر کسی افترا پر اس کی بنیاد ہوتی تو یہ دلائل بیّنہ اس کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 398
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 398
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/398/mode/1up
    شامل حال ہرگز نہ ہوتے۔ بعضؔ کہتے ہیں کہ اگر ہم قبول بھی کر لیں کہ مسیح ابن مریم رسو ل اللہ فوت ہوگیا ہے تو اس بات کا ثبوت کیاہے کہ تم ہی ہو جو اس کے قائم مقام بھیجے گئے ہو۔ اس کا جواب یہ ہے کہ ہریک انسان اپنے کاموں سے شناخت کیاجاتاہے۔ ہرچند عوام کی نظر میں یہ دقیق اور غامض بات ہے لیکن زیرک لوگ اس کو خوب جانتے ہیں کہ ایسے مامور من اللہ کی صداقت کا اس سے بڑ ھ کر اَور کوئی ثبوت ممکن نہیں کہ جس خدمت کے لئے اس کا دعویٰ ہے کہ اس کے بجالانے کے لئے میں بھیجا گیا ہوں۔ اگر وہ اس خدمت کو ایسی طرز پسندیدہ اور طریق برگزیدہ سے ادا کردیوے جو دوسرے اس کے شریک نہ ہو سکیں تو یقینًا سمجھا جائے گا کہ وہ اپنے دعویٰ میں سچا تھا کیونکہ ہر یک چیز اپنی علّت غائی سے شناخت کی جاتی ہے۔ اور یہ خیال بالکل فضول ہے کہ جو مثیل مسیح کہلاتاہے وہ مسیح کی طرح مُردوں کو زندہ کر کے دکھلاوے یا بیماروں کو اچھا کر کے دکھلا وے کیونکہ مماثلت علّت غائی میں ہوتی ہے۔ درمیانی افعال کی مماثلت معتبر نہیں ہوتی۔ بائبل کی کتابوں کو پڑھنے والے جانتے ہیں کہ جو خوارق مسیح کیؔ طرف منسوب کئے گئے ہیں یعنی مردوں کا زندہ کرنا یا بیماروں کو اچھا کرنا یہ مسیح سے مخصوص نہیں ہے بلکہ بعض بنی اسرائیلی ایسے بھی گزرے ہیں کہ اِن سب کاموں میں نہ صرف مسیح ابن مریم کے برابر بلکہ اس سے بھی آگے بڑھے ہوئے تھے لیکن پھر بھی ان کو مثیل مسیح نہیں کہا جاتا نہ مسیح کو اُنکا مثیل ٹھہرایا جاتا ہے۔ایسا ہی ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم مثیل موسیٰ قرار دئے گئے ہیں۔ قرآن کریم اس پر ناطق ہے لیکن کبھی کسی نے نہیں سُنا ہو گا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے سوٹے سے حضرت موسیٰ کی طرح سانپ بنایا ہو یا آسمان سے خون اور جوئیں اور مینڈکیں برسائی ہوں بلکہ اس جگہ بھی علّت غائی میں مشابہت مراد ہے چونکہ حضرت موسیٰ بنی اسرائیل کی رہائی دلانے کے لئے مامور کئے گئے تھے سو یہی خدمت آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے سپرد ہوئی تا اس وقت کے فرعونوں سے زبردست ہاتھ کے ساتھ مومنوں کو رہائی دلاویں اور جیسا کہ نصرت الٰہی ایک خاص رنگ میں حضرت موسیٰ کے
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 399
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 399
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/399/mode/1up
    شامل حال ہوئی۔ ایسا ہی نصرت الٰہی ایک دوسرے رنگ میں ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے شامل حال ہوگئی اور درحقیقت وہی نصرت ہے جو اپنے اپنے محل پر رنگا رنگ کے معجزات کے نام سےؔ موسوم ہوتی ہے۔ سو میں خوب جانتا ہوں کہ جیسا کہ نصرت الٰہی حضرت مسیح کے شامل حال ہوئی تھی میں بھی اس نصرت سے بے نصیب نہیں رہوں گا لیکن یہ ضرور نہیں کہ وہ نصرت جسمانی بیماروں کے اچھا کرنے سے ظاہر ہو بلکہ خدائے تعالیٰ نے ایک الہام میں میرے پر ظاہر فرمایا ہے کہ خلق اللہ کی روحانی بیماریوں اور شکوک اور شبہات کو وہ نصرت دُور کرے گی۔ جیساکہ میں پہلے اس سے لکھ چکا ہوں اور میں دیکھتا ہوں کہ مستعد دلوں پر اثر پڑتا جاتا ہے اور پرانی بیماریاں دور ہوتی جاتی ہیں اور نصرت الٰہی اندر ہی اندر کام کر رہی ہے اور خدا تعالیٰ نے اپنے خاص کلام سے میری طرف اشارہ کر کے فرمایا کہ نبی ناصری کے نمونہ پر اگر دیکھاجائے تو معلوم ہو گا کہ وہ روحانی بیماریوں کو بہت صاف کررہا ہے اس سے زیادہ کہ کبھی جسمانی بیماریوں کو صاف کیا گیا ہو۔
    حا ل کے نیچری جن کے دلوں میں کچھ بھی عظمت قال اللہ اور قال الرسول کی باقی نہیں رہی یہ بے اصل خیال پیش کرتے ہیں کہ جو مسیح ابن مریم کے آنے کی خبریں صحا ح میں موجود ہیں یہ تمام خبریں ہیؔ غلط ہیں۔ شاید اُن کا ایسی باتو ں سے مطلب یہ ہے کہ تا اس عاجز کے اس دعوے کی تحقیر کر کے کسی طرح اس کو باطل ٹھہرایا جاوے لیکن وہ اس قدر متواترات سے انکار کر کے اپنے ایمان کو خطرہ میں ڈالتے ہیں۔ یہ بات ظاہر ہے کہ تواتر ایک ایسی چیز ہے کہ اگر غیر قوموں کی تواریخ کے رو سے بھی پایا جائے تو تب بھی ہمیں قبول کرنا ہی پڑتاہے۔ جیسا کہ ہندوؤں کے بزرگوں رام چندر اور کرشن وغیرہ کا وجود تواتر کے ذریعہ سے ہی ہم نے قبول کیا ہے۔ گو تحقیق و تفتیش تاریخی واقعات میں ہندو لوگ بہت کچّے ہیں مگر باوجود اس قدر تواتر کے جو اُن کی مسلسل تحریروں سے پایاجاتاہے ہرگز یہ گمان نہیں ہو سکتا کہ راجہ رام چندر اور راجہ کرشن یہ فرضی ہی نام ہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 400
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 400
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/400/mode/1up
    اب سمجھنا چاہیئے کہ گو اجمالی طور پر قرآن شریف اکمل واتم کتاب ہے مگرایک حصہ کثیرہ دین کا اور طریقہ عبادات وغیرہ کامفصل اور مبسوط طور پر احادیث سے ہی ہم نے لیا ہے اور اگر احادیث کوہم بکلّی ساقط الاعتبار سمجھ لیں تو پھر اس قدر بھی ثبوت دینا ہمیں مشکل ہوگا کہ درحقیقت حضرت ابو بکر وعمر رضی اللہ عنہما وعثمان ذوالنورینؓ اور جناب علی مرتضی کرم اللہ وجہہٗ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہؔ کرام اور امیرالمؤمنین تھے اور وجود رکھتے تھے صرف فرضی نام نہیں کیونکہ قرآن کریم میں ان میں سے کسی کانام نہیں۔ ہاں اگر کوئی حدیث قرآن شریف کی کسی آیت سے صریح مخالف و مغائر پڑے مثلًا قرآ ن شریف کہتا ہے کہ مسیح ابن مریم فوت ہوگیا اور حدیث یہ کہے کہ فوت نہیں ہوا تو ایسی حدیث مردود اور ناقا بل اعتبار ہوگی لیکن جو حدیث قرآن شریف کے مخالف نہیں بلکہ اس کے بیان کو اور بھی بسط سے بیان کرتی ہے وہ بشرطیکہ جرح سے خالی ہوقبول کرنے کے لائق ہے۔ پس یہ کمال درجہ کی بے نصیبی اور بھاری غلطی ہے کہ یک لخت تمام حدیثوں کو ساقط الاعتبار سمجھ لیں اور ایسی متواتر پیشگوئیوں کو جو خیر القرون میں ہی تمام ممالک اسلام میں پھیل گئی تھیں اور مسلّمات میں سے سمجھی گئی تھیں بمد موضوعات داخل کردیں۔یہ بات پوشیدہ نہیں کہ مسیح ابن مریم کے آنیکی پیشگوئی ایک اول درجہ کی پیشگوئی ہے جس کو سب نے بالاتفاق قبول کرلیاہے اور جس قدر صحاح میں پیشگوئیاں لکھی گئی ہیں کوئی پیشگوئی اس کے ہم پہلو اور ہم وزن ثابت نہیں ہوتی۔ تواتر کا اول درجہ اس کو حاصل ہے۔انجیل بھی اس کی مصدّق ہے۔ اب اس قدر ثبوت پر پانی پھیرنا اور یہ کہنا کہ یہ تمام حدیثیں موضوع ہیں درحقیقت اُن لوگوں کا کام ہے جن کو خدائے تعالیٰ نے بصیرت دینی اور حق شناسی سے کچھ بھی بخرہ اور حصہ نہیں دیا اور بباعث اس کے کہ اُن لوگوں کے دلوں میں قال اللہ اورقال الرسول کی عظمت باقی نہیں رہی اس لئے جوبات اُن کی اپنی سمجھ سے بالاتر ہواس کو محالات اور ممتنعات میں داخلؔ کرلیتے ہیں۔ قانون قدرت بے شک حق اور باطل کے آزمانے کے لئے ایک آلہ ہے مگر ہرایک قسم کی آزمائش کا اسی پر مدار نہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 401
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 401
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/401/mode/1up
    اس کے علاوہ اور آلات اور محک بھی تو ہیں جن کے ذریعہ سے اعلیٰ درجہ کی صداقتیں آزمائی جاتی ہیں۔ بلکہ اگر سچ پوچھو تو قانون قدرت مصطلحہ حکماء کے ذریعہ سے جو جو صداقتیں معلوم ہوتی ہیں وہ ایک ادنیٰ درجہ کی صداقتیں ہیں لیکن اس فلسفی قانون قدرت سے ذرہ اُوپر چڑھ کرایک اور قانون قدرت بھی ہے جو نہایت دقیق اور غامض اور بباعث دقّت و غموض موٹی نظروں سے چھپا ہُو ا ہے جو عارفوں پر ہی کھلتا ہے اور فانیوں پر ہی ظاہر ہوتاہے۔ اس دنیا کی عقل اور اس دنیا کے قوانین شناس اس کو شناخت نہیں کر سکتے اور اس سے منکر رہتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جو امور اس کے ذریعہ سے ثابت ہوچکے ہیں اور جو سچائیاں اس کی طفیل سے بپایہ ثبوت پہنچ چکی ہیں وہ ان سفلی فلاسفروں کی نظر میں اباطیل میں داخل ہیں۔ ملائک کو یہ لوگ صرف قویٰ خیال کرتے ہیں اور وحی کو یہ لوگ صرف فکر اور سوچ کا ایک نتیجہ سمجھتے ہیں یا ہر یک بات جو دل میں پڑتی ہے اس کا نام وحی رکھؔ لیتے ہیں اور قرآن کریم اور دوسری الٰہی کتابوں کو ایسا خیال کرتے ہیں کہ گویا نبیوں نے آپ بنا لی ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ ذات قوی اور قیوم جو اس عالم کے ظاہر وباطن کی مدبّر ہے اس کی عظمت اُن کے دل میں نہیں اور اس کو ایک مردہ یا سویا ہوا یا ناتواں اور غافل خیال کیا گیا ہے اور اس کی تمام قدرتی عمارت کے مسمار کرنے کی فکر میں ہیں معجزات سے بکلّی منکر اور فرقانی پیشگوئیوں سے انکاری ہیں اور اپنی نابینائی کی وجہ سے فرقان کریم کو ایک ادنیٰ سا معجزہ بھی نہیں سمجھتے حالانکہ وہ تمام معجزات سے برتر واعلیٰ ہے۔ بہشت اور دوزخ کی ایسی ضعیف طور پر تاویل کرتے ہیں کہ جس سے منکر ہونا ہی ثابت ہوتا ہے۔ حشر اجساد سے بکلّی انکاری ہیں۔عبادات اور صوم وصلٰوۃ پر ہنسی اور ٹھٹھاکرتے ہیں اور رُوبحق ہونے کی جگہ رُوبدُنیا ہونا اُنکے نزدیک بہتر ہے اور جو شخص روبحق ہووہ اُن کے نزدیک سادہ لوح اور ابلہ اور بیوقوف درویش ہے۔ مسلمانوں کی بدقسمتی سے یہ فرقہ بھی اسلام میں پیداہوگیا جس کا قدم دن بدن الحادؔ کے میدانوں میں آگے ہی آگے چل رہا ہے۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 402
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 402
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/402/mode/1up
    اے خدا اے میرے قادر خدا مدد کر کہ لوگوں نے افراط اور تفریط کی راہیں لے لی ہیں۔ بعض نے تیرے کلام کے بیّنا ت تیرے کلام کے اشارات تیرے کلام کے دلالات تیرے کلام کی فحوا کو بکلّی چھوڑ کر بے بنیاد لکیر کو اس کی جگہ پسند کرلیا اور بعض نے تیرے کلام کو بھی چھوڑا اور لکیر کو بھی چھوڑا اور صرف اپنی ناقص عقل کو اپنا رہبر بنا لیا اور امام الرسل کو چھوڑ کر یورپ کے تاریک خیال محجوب فلاسفروں کو اپنا امام بنا لیا۔
    اے میرے دوستو! اب میری ایک آخر ی وصیت کو سنو اور ایک راز کی بات کہتا ہوں اس کو خوب یاد رکھو کہ تم اپنے ان تمام مناظرات کا جو عیسائیوں سے تمہیں پیش آتے ہیں پہلو بدل لو اور عیسائیوں پر یہ ثابت کر دو کہ درحقیقت مسیح ابن مریم ہمیشہ کے لئے فوت ہو چکا ہے۔ یہی ایک بحث ہے جس میں فتحیاب ہونے سے تم عیسائی مذہب کی روئے زمین سے صف لپیٹ دوگے۔ تمہیں کچھ بھی ضرورت نہیں کہ دوسرے لمبے لمبے جھگڑوں میں اپنے اوقاتِ عزیز کو ضائع کرو۔ صرؔ ف مسیح ابن مریم کی وفات پر زور دو اور پُر زور دلائل سے عیسائیوں کو لاجواب اور ساکت کر دو۔ جب تم مسیح کا مردوں میں داخل ہونا ثابت کردو گے اور عیسائیوں کے دلوں میں نقش کردو گے تو اُس دن تم سمجھ لو کہ آج عیسائی مذہب دنیا سے رخصت ہوا۔ یقینًا سمجھو کہ جب تک ان کا خدا فوت نہ ہو اُن کا مذہب بھی فوت نہیں ہو سکتا۔ اور دوسری تمام بحثیں اُن کے ساتھ عبث ہیں۔اُنکے مذہب کا ایک ہی ستون ہے اور وہ یہ ہے کہ اب تک مسیح ابن مریم آسمان پر زندہ بیٹھا ہے۔ اس ستون کو پاش پاش کرو پھر نظر اُٹھا کر دیکھو کہ عیسائی مذہب دنیا میں کہاں ہے۔ چونکہ خدائے تعالیٰ بھی چاہتا ہے کہ اِس ستون کو ریزہ ریزہ کر ے اور یوروپ اور ایشیا میں توحید کی ہو ا چلا دے۔ اِس لئے اُس نے مجھے بھیجا اور میرے پر اپنے خاص الہام سے ظاہر کیا کہ مسیح ابن مریم فوت ہو چکا ہے۔ چنانچہ اس کا الہام یہ ہے کہ مسیح ابن مریم رسول اللہ فوت ہو چکا ہے اور اُس کے رنگ میں ہو کر وعدہ کے موافق تُوؔ آیا ہے وکان وعداللّٰہ مفعولا انت معی وانت علی الحق المبین انت مصیب ومعین للحق۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 403
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 403
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/403/mode/1up
    میں نے اس کتاب میں نہایت زبردست ثبوتوں سے مسیح کا فوت ہوجانا اور اموات میں داخل ہونا ثابت کردیا ہے اور میں نے بداہت کی حد تک اس بات کو پہنچا دیا ہے کہ مسیح زندہ ہو کر جسم عنصری کے ساتھ ہرگز آسمان کی طرف اُٹھایا نہیں گیا بلکہ اَور نبیوں کی موت کی طرح اُس پر بھی موت آئی اور دائمی طورپر وہ اس جہان سے رخصت ہؤا۔ اگر کوئی مسیح کا ہی پرستار ہے تو سمجھ لے کہ وہ مر گیا اور مرنے والوں کی جماعت میں ہمیشہ کے لئے داخل ہوگیا۔ سو تم تائید حق کے لئے اس کتاب سے فائدہ اٹھاؤ اور سرگرمی کے ساتھ پادریوں کے مقابل پر کھڑے ہوجاؤ۔ چاہئے کہ یہی ایک مسئلہ ہمیشہ تمہار ے زیر توجہ اور پورا بھروسہ کرنیکے لائق ہو جو درحقیقت مسیح ابن مریم فوت شدہ گروہ میں داخل ہے۔ میں نے اس بحث کو اس کتاب میں بڑی دلچسپی کے ساتھ کامل اور قوی دلائل سےؔ انجام تک پہنچایا ہے اور خدائے تعالیٰ نے اس تالیف میں میری وہ مدد کی ہے جو میں بیان نہیں کر سکتا اور میں بڑے دعوے اور استقلال سے کہتا ہوں کہ میں سچ پر ہوں اور خدائے تعالیٰ کے فضل سے اس میدان میں میری ہی فتح ہے اور جہاں تک میں دُور بین نظر سے کام لیتا ہوں تمام دنیا اپنی سچائی کے تحت اقدام دیکھتا ہوں اور قریب ہے کہ میں ایک عظیم الشان فتح پاؤں کیونکہ میری زبان کی تائید میں ایک اور زبان بول رہی ہے اور میرے ہاتھ کی تقویت کے لئے ایک اور ہاتھ چل رہا ہے جس کو دنیا نہیں دیکھتی مگر میں دیکھ رہا ہوں۔ میرے اندر ایک آسمانی روح بول رہی ہے۔ جو میرے لفظ لفظ اور حرف حرف کو زندگی بخشتی ہے اور آسمان پر ایک جوش اور اُبال پیدا ہوا ہے جس نے ایک پُتلی کی طرح اس ُ مشتِ خاک کو کھڑا کردیاہے۔ ہر یک وہ شخص جس پر توبہ کا دروازہ بند نہیں عنقریب دیکھ لے گا کہ میں اپنی طرف سے نہیں ہوں۔ کیا وہ آنکھیں بینا ہیں جو صادق کو شناخت نہیں کر سکتیں۔ کیا وہ بھی زندہ ہے جس کو اس آسمانی صدا کا احساس نہیں۔
    Ruhani Khazain Volume 3. Page: 404
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 404
    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=3#page/404/mode/1up
    وقتؔ و تاریخ نزُ ول مسیح موعُود
    حسب اقوال اکابر سلف و خلف
    ودیگر حالات
    منقولہ از کتاب اٰ ثارالقیامۃ
    مولوی سید صدیق حسن خاں صاحب مرحوم نے جن کو مولوی ابو سعید محمد حسین صاحب مجدّد قرار دے چکے ہیں۔ اپنی کتاب آثار القیامۃ کے صفحہ ۳۹۵ میں بتصریح لکھا ہے کہ ظہور مہدی اور نزول عیسیٰ اور خروج دجّال ایک ہی صدی میں ہو گا۔ پھر لکھا ہے کہ امام جعفر صادق کی یہ پیشگوئی تھی