1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 16 ۔خطبہ الھامیہ ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏ستمبر 4, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 1

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 1

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 2

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 2

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 3

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 3

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    ا ؔ لاعلان

    ایّھا الاخوان من العرب وفارس والشام۔ وغیرھا من بلاد الاسلام۔ اعلموا رحمکم اللّٰہ انی کتبت ھٰذا الکتاب لکم ملھمًا من ربّی۔ واُمرت ان ادعوکم الی صراط ھُدیتُ الیہ و اُؤدبکم بادبی۔ وھٰذا بعدما انقطع الامل مِن علماء ھٰذہ الدیار۔ وتحقق انھم لا یبالون عقبی الدار۔ وانقطعت حرکتھم الی الصدق من تفالجٍ لامن فالجٍ۔ وما نفعھم اثر دواء ولاسعی معالج۔ ومابقی لِاَجَارِد المعارف فی ارضھم مرتع۔ ولا فی اھلھا مطمع۔ فعند ذالک القی فی قلبی من الحضرۃ۔ ان اٰوی الیکم لطلب النصرۃ۔ لتکونوا انصاری کاھل المدینۃ ومن نصرنی وصدقنی فقد ارضی ربہ وخیرَالْبریۃ۔ وان شرالد واب الصّم البکم الذین لا یصغون الی الحق والحکمۃ۔ ولا یسمعون برھانًا ولوکان من الحجج البالغۃ۔ واذا قیل لھم اٰمنوا بما اتاکم من ربّکم من الحقّ والبیّنۃ۔ بعد ایام کثرت الفِرق واختلافھم فیھا وتلاطم بحرالضلالۃ۔ قالوا لانعرف ماالحق وانا وجدنا اٰبَاء نا علی عقیدۃ۔ واناعلیھا الی یوم المنیّۃ۔ وماقلت لھم الاما قال القراٰن۔ فما کان جوابھم الاالسب والھذیان۔ وان اللّٰہ قد علّمنی ان عیسی ابن مریم قد مات۔ ولحق الاموات۔ واماالذی کان نازلا من السماء۔ فھو ھٰذا القائم بینکم کما اوحی اليّ من حضرۃ الکبریاء۔ وکانت حقیقۃ النزول* ظھور المسیح الموعود عند انقطاع الاسباب۔ وضعف الدولۃ الاسلامیۃ وغلبۃ الاحزاب

    * الحاشیۃ۔ اعلموا انّ لفظ النزول قد اختیر للمسیح الموعود للوجھین (۱)احد۔ھما لاظہار انقطاع الاسباب الارضیۃ کالحکومۃ والریاسۃ والوسائل الحربیۃ فی مُلک یُبعث فیہ من الحضرۃ الاحدیّۃ۔ کانّہ کانت اشارۃ الٰی ان المسیح الموعود لایأ تی الا فی مُلک لایبقٰی فیہ للاسلام قوۃٌ ولا للمسلمین طاقۃ ومع ذالک یقومون للا نکار و



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 4

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 4

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ



    وکان ھٰذا اشارۃ الی ان الامرکلہ ینزل من السماء۔ من غیر ضرب الاعناق وقتل الاعداء۔ ویُریٰ کالشمس فی الضیاء۔ ثم نقل اھل الظاھر ھٰذہ الاستعارۃ الی الحقیقۃ۔ فھٰذہ اوّل مصیبۃ نزلت علٰی ھٰذہ الملۃ۔ وما اراد اللّٰہ من انزال المسیح۔ الّا لیُری مقابلۃ الملتین بالتصریح۔ فان نبینا المصطفٰی کان مثیل موسٰی۔ وکانت سلسلۃ خلافۃ الاسلام۔ کمثل سلسلۃ خلافۃ الکلیم من اللّٰہ العلام۔ فوجب من ضرورۃ ھٰذہ المماثلۃ والمقابلۃ ان یظھر فی اٰخر ھٰذہ السلسلۃ مسیح کمسیح السلسلۃ الموسویۃ۔ ویھود کالیھود الذین کفّروا عیسٰی وکذبوہ و ارادوا قتلہ وجروہ الٰی ارباب الحکومۃ فمن العجب ان علماء الاسلام اعترفوا بان الیھود الموعودون فی اٰخر الزمان لیسوا یھودًا فی الحقیقۃ بل ھم مثلھم من المسلمین فی الاعمال وَالعادۃ۔ ثم یقولون مع ذالک ان المسیح ینزل من السماء۔ وھو ابن مریم رسول اللّٰہ فی الحقیقۃ لامثیلہ من الاصفیاء۔ فکانھم حسبوا ھٰذہ الامۃ اردء الامم واخبثھم فانھم زعموا ان المسلمین قوم لیس فیھم احد یقال لہ انہ مثیل بعض الاخیار السابقین۔ وامّا مثیل الاشرار فکثیرفیھم ففکروا فیہ یامعشر العاقلین۔ ثم ان مسئلۃ نزول عیسٰی نبی اللّٰہِ کانت من اختراعات النصرانیین۔ واماالقراٰن فتوفاہ والحقہ بالمیتین۔ وما اضطرت النصارٰی الٰی نحت ھٰذہ العقیدۃ الواھیۃ الا

    بقیۃ الحاشیۃ ۔ یریدون اَن یطفؤا نور اللّٰہ فضلا من ان یکونوا من الانصار فیؤیّد المسیح من لدن ربّ السماء ولایکون علیہ منّۃ احد من ملوک الارض واھل الدول والامراء ولایستعمل السیف والسنان فکانّہ نزل من السماء ونصرہ اللّٰہ من لدنہ و أعان (۲) ثانیھما لاظہار شھرۃ المسیح الموعود فی اسرع الاوقات والزمان فی جمیع البلدان۔ فان الشئ الذی ینزل من السماء یراہ کل احدٍ من قریبٍ وبعیدٍ ومن الاطراف والانحاء۔ ولایبقٰی علیہ سِتْرٌ فی اَعْین ذوی الانصاف۔ ویشاھد کبرقٍ یبرق من طرفٍ الی طرفٍ حتّی یحیط کدائرۃٍ علی الاطراف۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 5

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 5

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    فی ایام الیأس وقطع الامل من النصرۃ الموعودۃ۔ فان الیھود کانوا یسخرون منھم ویضحکون علیھم ویؤذونھم بانواع الکلمات۔ عندما رَأَوْا خذلانھم وتقلبھم فی الاٰفات۔ فکانوا یقولون این مسیحکم الذی کان یزعم انہ یرث سریر داوٗد وینال السلطنۃ وینجی الیھود فتألم النصارٰی من سماع ھٰذہ المطاعن۔ و الام الصبرُ باللّاعن۔ فنحتوا الجوابَین۔ عند ہٰذین الطعنین والخطابین۔ فقالوا ان یسوع ابن مریم وان کان مانال السلطنۃ فی ھٰذہ الاٰوان۔ ولٰکنہ ینزل بصورۃ الملوک الجبارین القھارین فی اٰخر الزمان۔ فیقطع ایدی الیھود وارجلھم وانوفھم ویھلکھم باشد العذاب والھوان۔ ویجلس احبابہ بعد ھٰذا العقاب۔ علی سرر مرفوعۃ موعودۃ فی الکتاب۔ و اما قول المسیح انہ من اٰمن بہ فینجیہ من الشدائد التی نزلت علٰی بنی اسرائیل۔ فمعناہ انہ ینجیہ بدمہ من الذنوب لامن جور الحکومۃ الرومیۃ کما ظنّ وقیل۔ فحاصل الکلام ان النصارٰی لمّا اٰذاھم طول مکثھم فی المصائب۔ واطال الیھود السنھم فی امرھم وحسبوھم کالخاسر الخایب۔ شق علیھم ھٰذا الاستھزاء۔ فنحتوا العقیدتین المذکورتین لیسکت الاعداء۔ وانّ من عادات الانسان۔ انہ یتشبّث بامانی عند ھبوب ریاح الحرمان۔ واذاؔ رأی انہ مابقی لہ مقام رجاء۔ فیسرّ نفسہ باَھْواءٍ۔ فیطلب ما ندّ عن الاذھان۔ وشذّ عن الاٰذان۔ فقد یطلب الکیمیاء عند نفاد الاموال۔ وقد یتوجہ الی تسخیر النجوم والاعمال۔ وکذالک النصارٰی اذا وقع علیھم قول الاعداء۔ وما کان مَفَرٌّ من ھٰذا البلاء۔ فنحتوا مانحتوا واتّکؤا علی الامانی۔ کماھوسیرۃ الاسیر والعانی۔ فاشاعوا الاصولین المذکورین کما تعلم وترٰی۔ ووفّوا حق العمٰی۔ ولما صار اعتقاد نزول المسیح جزو طبیعتھم۔ واحاط علی مجاری الفھم وعادتھم۔ کانت عنایتھم مصروفۃ لامحالۃ الی نزول عیسٰی۔ لیھلک اعداء ھم ویجلسھم علی سرر العزۃ والعُلٰی۔ فھٰذا ھوسبب سریان ھٰذہ العقیدۃ فی الفِرق المسیحیۃ۔ ومثلھم فی الاسلام یوجدفی الشیعۃ۔ فانّہ لمّا طال علیھم امد الحرمان۔ وما قام فیھم ملک الی قرون من



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 6

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 6

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    الزمان۔ نحتوا من عند انفسھم ان مھدیھم مستترفی مغارۃ۔ ویخرج فی اٰخرالزمان و یحیی صحابۃ رسول اللّٰہؐ لیقتلھم بِاذِیّۃٍ۔ وان حسینًا بن علی وان کان مانجّاھم من ظلم یزید۔ ولٰکن ینجّیھم بدمہ فی الیوم الاٰخرمن عذاب شدید۔ وکذالک کل من خسر وخاب نَحَتَ ھٰذا الجواب۔ وسمعت ان فرقۃ من الوھابیین الھندیین ینتظرون کمثل ھٰذہ الفرق شیخھم سید احمدن البریلوی وانفدوا اعمارھم فی فلوات منتظرین فھٰؤلاء کلھم محل رحم بمالم یرجع احد من کبراء ھم الی ھٰذا الحین۔ بل رجع المنتظرون الیھم وکم حسرات فی قلوب المقبورین۔ فملخّص القول ان عقیدۃ رجوع المسیح وحیاتہ کانت من نسج النصارٰی ومفتریاتھم۔ لیطمئنوا بالامانی ویذبّوا الیھود وھمزاتھم۔ واما المسلمون فدخلوھا من غیر ضرورۃ۔ و اُخذ ۔وا من غیر شبکۃ۔ واکلوا السم من غیر حلاوۃ۔ واذا قبلوا رکنًا من رکنی الملۃ النصرانیۃ۔ فما معنی الانکار من الرکن الثانی اعنی الکفّارۃ۔ وانا فصّلنا ھٰذہ الامور کلھا فی الکتاب۔ وکفاک ھٰذا ان کنت من الطُّلّاب۔ ان الذین ظنوا من المسلمین ان عیسٰی نازل من السماء مااتبعوا الحق بل ھم فی وادی الضلال یتیھون۔ ما لھم بذالک من علم ان ھم الا یخرصون۔ اَمْ اُوْتوا من البرھان اوعُلّموا من القراٰن فھم بہ مستمسکون۔ کلّا بل اتبعوا اھواء الذین ضلّوا من قبل وترکوا ما قال ربّھم ولا یبالون۔ وقد ذکر الفرقان ان عیسٰی قد توفّی فبأی حدیث بعد ذالک یؤمنون۔ الایفکرون فی سرّ مجئ المسیح ام علی القلوب اقفالھا ام ھم قوم لایبصرون۔ ان اللّٰہ کان قد مَنّ علی بنی اسرائیل بموسٰی و النبیین الذین جاء وا من بعدہ منھم فعصوا انبیاء ھم ففریقًاکذبوا وفریقًا یقتلون۔ فاراد اللّٰہ ان ینزع منھم نعمتہ ویؤتیھا قومًا اٰخرین ثم ینظرکیف یعملون۔ فبعث مثیل موسٰی من قوم بنی اسماعیل وجعل علماء امتہ کانبیاء سلسلۃ الکلیم وکسرغرور الیھود بھا بما کانوا یستکبرون۔ واٰتٰی نبینا کلّما اوتی موسٰی وزیادہ واٰتاہ من الکتاب والخلفاء کمثلہ واحرق بہ قلوب الذین ظلموا واستکبروا لعلھم یرجعون۔ فکما انہ خلق الازواج کلّھا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 7

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 7

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    کذالک جعل السلسلۃ الاسماعیلیۃ زوجًا للسلسلۃ الاسرائیلیۃ۔ وذالک امرنطق بہ القراٰن ولا ینکرہ الاالعمون۔ الا تری قولہ تعالٰی فی سورۃ الجاثیۃ ۔ فانظر کیف ذکر اللّٰہ تعالٰی ھٰھنا سلسلتین متقابلتین سلسلۃ موسٰی الٰی عیسٰی۔ وسلسلۃ نبینا خیر الوریٰ الی المسیح الموعود الذی جاء فی زمنکم ھٰذا۔ وانہ ماجاء من القریش کما ان عیسٰی ماجاء من بنی اسرائیل۔ وانہ علم لساعۃ کافۃ الناس کما کان عیسٰی علما لساعۃ الیھود۔ ھٰذا ما اشیر الیہ فی الفاتحۃ۔ وما کان حدیث یفتریٰ۔ وقد شھدت السماء بٰایاتھا وقالت الارض الوقت ھٰذا الوقت فاتق اللّٰہ ولاتیئس من روح اللّٰہ والسلام علی من التبع الھُدٰی۔

    فحاصل الکلام ان القراٰن مملو من ان اللّٰہ تعالٰی اختار موسٰی بعد ما اھلک القرون الاولٰی واٰتاہ التوراۃ وارسل لتائیدہ النبیین تترا۔ ثم قفا علٰی اٰثارھم بعیسٰی*۔ واختار محمدا صلی اللّٰہ علیہ وسلم بعد ما اھلک الیھود واردیٰ۔ و

    * الحاشیۃ ۔ اعترض عليّ جاھل من بلدۃٍ اسمھا جھلٌ یا ذوی الحصاتِ۔ وفی اٰخرھاحرف المیم لیدل علٰی مسخ القلب والممات۔ وفرح فرحًا شدیدًا باعتراضہ وشتمنی وذکرنی باقبح الکلمات۔ وقال انّ ھٰذا الرجل یزعم ان عیسٰی کان من مُتّبعی موسٰی ولیس زعمہ ھٰذا الّا باطلًا وانّ کذبہ من اَجْلی البدیھیّات۔ بل اُوْتی عیسٰی شریعۃً مستقلۃً بالذات۔ فاغنی الذین کانوا مجتمعین علیہ من شریعۃ الکلیم واقام الانجیل مقام التوراۃ فاعلم ان ھٰذا قولٌ لایخرج من فَمٍ اِلّامن فم الذی نُجس بنجاسۃ الجھل والجھلات۔ وذاب انف فطنتہ بجذام التعصّبات۔ وزعم ھٰذا الجاھل کانّہ یستدل علی دعواہ بالفرقان الذی ھوالحَکَم عند الخصومات۔وقرء قولہ تعالٰی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 8

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 8

    http://www.alislam.org/library/brow...ain_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/8/mode/1up


    لا ؔ شک ولاریب ان السلسلۃ الموسویۃ والمحمدیۃ قد تقابلتا وکذالک اراد اللّٰہ وقضٰی۔ واما عیسٰی فھومن خدام الشریعۃ الاسرائیلیۃ ومن انبیاء سلسلۃ موسٰی۔ وما اوتی لہ شریعۃ کاملۃ مستقلۃ ولا یوجد فی کتابہ تفصیل الحرام والحلال والوراثۃ

    بقیۃ الحاشیۃ۔33 ا؂۔یعنی ببشارۃ خیر الکائنات۔ ومافھم سرّھذہ الاٰیۃ وصال علیّ بصوت ھواَنْکر الاصوات۔ وظنّ انّہ اویٰ الٰی رکن شدید وسبّنی کالقاذفاتِ المفحشات۔ وقال انّھا دلیل واضح علی ان الانجیل شریعۃ مستقلۃ فیااسفًا علیہ وعلی غیظہ الذی اخرجہٗ من الارض کالحشرات ۔ وان من اشقی الناس من لاعقل لہ ویعدّ نفسہ من ذوی الحصاۃ۔ ویعلم کل صبیٍّ وصبیۃ من المسلمین والمسلمات فضلا من البالغین والبالغات۔ ان القراٰن لایامر الیھود ولاالنصاریٰ ان یتبعوا کتبھم ویثبتوا علی شرائعھم بل یدعوھم الی الاسلام واوامرہ وقد قال اللّٰہ فی کتابہ العزیز3۲؂ 3 ۳؂۔ فکیف یُظنُّ فی اللّٰہ القدوسِ انّہ یدعوا الیھود والنصاریٰ فی ھٰذہ الاٰیۃ الی الاسلام یقول انّکم لا تفلحون ابدًا ولا تدخلون الجنّۃ الابعد ان تکونوا مسلمین۔ ولا ینفعکم توراتکم ولاانجیلکم الاالقرآن۔ ثمؔ ینسٰی قولہ الاول ویامرکل فرقۃ من الیھود والنصارٰی ان یثبتوا علی شرائعھم یتمسکوا بکتبھم ویکفیھم ھٰذا لنجاتھم

    وان ھٰذا الاجمع الضدّین واختلاف فی القراٰن۔ واللّٰہ نزّہ کتابہ عن الاختلاف

    بقولہ 3۴؂ بل الاٰیۃ التی حَرَّف المُعتَرِض معناھا کمثل الیھود تشیر الی ان بشارت نبینا صلی اللّٰہ علیہ وسلم کانت موجودۃً فی التورات والانجیل فکان اللّٰہ یقول مالھم لایعملون علٰی وصایا التوراۃ والانجیل ولایُسلمون۔ نعم لوکانت عبارۃ القراٰن بصیغۃ الماضی ولم یقل وَلْیَحْکُمْ بل قال وکان النصاریٰ یحکمون بالانجیل

    فقط مکان ذالک دلیلًا علٰی مدعاہُ و اما بقیۃ الفاظ ھٰذہ الاٰیات



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 9

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 9

    http://www.alislam.org/library/brow...ain_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/9/mode/1up


    والنکاح ومسائل اخرٰی۔ والنصارٰی یُقِرُّون بہ ولذالک تری التورات فی ایدیھم کما تری الانجیل وقال بعض فرقھم انانجینامن اثقال شریعۃ التورات بکفارۃ دم عیسٰی۔ واما بعضھم الاٰخرون فیحرمون ماحرم التوراۃ ولایاکلون الخنزیر کمثل نصاریٰ اٰرمینیا وھم اقدم من فرق اخری فی المدی۔ واتفق کلھم علٰی ان عیسٰی اتٰی بفضل من اللّٰہ وان موسٰی اتٰی بالشریعۃ وسموھما عھد الشریعۃ وعھد الفضل وسمّوا الاوّل عتیقًا والاٰخر جدیدًا فاسئلھم ان کنت تشک فی ھٰذا۔ فملخّص کلامنا ان اللّٰہ توجّہ الٰی بنی اسرائیل رحمۃ منہ فاقام سلسلۃ بموسٰی واتمّھا بعیسٰی۔ وھو اٰخرلبنۃٍ لھا۔ ثم توجہ الٰی بنی اسماعیل فاقام سلسلۃ نبینا المصطفٰی۔ وجعلہ مثیل الکلیم لیری المقابلۃ فی کل ما اتٰی۔ وختم ھٰذہ السلسلۃ علٰی مثیل عیسٰی۔ لیتم النعمۃ علی ھٰذہ السلسلۃ کما اتمھا علی السلسلۃ الاولٰی۔ وان کانت السلسلۃ المحمدیۃ خالیۃً من ھٰذا المسیح المحمدی۔ فتلک اذا قسمۃٌ ضیزیٰ۔ ففکروا کل الفکر ولیس النُھٰی الا لھٰذا الامریا اولی النُھٰی۔ ولا ینجی المرء الاالصدق فاطلبوہ بدق باب الحضرۃ۔ واقبلوا علی اللّٰہ کل الاقبال لھٰذہ الخطّۃِ۔ وادعوہ فی جوف اللیالی وخرّوا باکین للّٰہ ذی العزۃ والجبروت ولا تمرّوا ضاحکین ھامزین واستعیذوا باللّٰہ من الطاغوت۔ یاعباد اللّٰہ تذکروا وتیقظوا فان المسیح الحَکَم قدأَتٰی۔ فاطلبوالعلم السماوی ولا تقوِّ موا متا عکم فی حضرۃ المولٰی۔ وواللّٰہ انّی من اللّٰہ اتیتُ وما افتریتُ وقدخاب من افتریٰ۔ انّ

    بقیۃ الحاشیۃ۔ اعنی لفظ فیہ نوروھدًی فلیس ھٰذا دلیلًا علی کون الانجیل شریعۃً مستقلۃً الیس الزبور وغیرہ من کتب انبیاء بنی اسرائیل ھُدًی للناس ا یوجد فیھا ظلمۃ ولایوجد نور فتفکر و لا تکن من الجاھلین۔ وانّ النصارٰی قد اتفقوا علٰی ان عیسی بن مریم ما ا تاھم بالشریعۃ واِنّا نکتب ھٰھنا شھادۃ جی۔اے لیفراے الذی ھوبشپ لاھور اعنی امام قسوس ھٰذہ الناحیۃ وکفاک ھٰذا ان کنت تخشی من سواد الوجہ والذلّۃ۔ ورأینا ان نکتب علیحدۃ ھٰذہ الشھادۃ فی الحاشیہ۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 10

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 10

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/10/mode/1up


    ایاّم اللّٰہ قداتَتْ وحسراتٌ علی الذی ابٰی۔ ولا یُفلح المُعرض حیث أَتٰی۔ والحق والحق اقول ان مجئ المسیح من ھٰذہ الامۃ کان امرا مفعولا من الحضرۃ من مقتضی الغیرۃ۔ وکان قدّر ظہورہ من یوم الخلقۃ۔ والسرّفیہ ان اللّٰہ اراد ان یجعل اٰخرالدنیا کأولھا فی نفی الغیر والمحوفی طاعۃ الحضرۃ الاحدیۃ۔ واسلاک الناس فی سلک الوحدۃ الطبعیۃ بعدما دعوا الی الوحدۃ القھریۃ۔ وکان الناس مُفْترقین الی الفرق المختلفۃ۔ والاٰراء المتنوعۃ۔ والاھواء المتخالفۃ۔ ومطیعین للحکومۃ الشیطانیۃ الدجالیۃ الظلمانیۃ۔ وماکانوا منفکین حتی تنزل علیھم فوج من السکینۃ۔ والشیطان الذی ھوثعبان قدیم ودجال عظیم ماکان مخلصھم من اسرہ۔ وکان یرید ان یاکلھم کلھم ویجعلھم وقود النار لانہ نظر الٰی ایّامہ و رَأَی انہ مابقی من ایام الانظار الا قلیلا فخاف ان یکون من المغلوبین۔ بمالم یکن من المنظرین اِلّا الٰی ھٰذا الحین فراٰی انہ ھالک بالیقین۔ فاراد اَنْ یصول صولا ھو خاتم صولا تہ واٰخر حرکاتہ۔ فجمع کلما عندہ من مکائدہ وحِیَلہ وسلاحہ وسائر الاٰلات الحربیّۃ۔ فتحرک کالجبال السائرۃ۔ والبحار الزاخرۃ بجمیع افواجہ لیدخل حمی الخلافۃ مع ذُرّیاتہ۔ فعند ذالک انزل اللّٰہ مسیحہ من السماء بالحربۃ السماویۃ۔ لیکون بین الکفروالایمان فیصلۃ القسمۃ۔ وانزل معہ جندہ من اٰیاتہ وملا ئکۃ سماواتہ۔ فالیوم یوم حرب شدید وقتال عظیم بین الداعی الی اللّٰہ وبین الداعی الی غیرہ۔ انھا حرب ماسمع مثلھا فی اول الزمن ولا یسمع بعدہ۔ الیوم لایترک الدجال المفتعل ذرۃ من مکائدہ الا یستعملھا۔ ولاالمسیح المبتھل ذرۃ من الاقبال علی اللّٰہ والتوجہ الی المبدء الا ویستوفیھا۔ ویحاربان حربًا شدیدًا حتی یعجب قوتھما وشدتھما کُلّ من فی السّمآء وتری الجبال قدمُ المسیح ارسخ من قدمھا۔ والبحار قلبہ ارق واجرٰی من ماء ھا۔ وتکون محاربۃ شدیدۃ وتنجّر الحرب الی اربعین سنۃ من یوم ظہور المسیح حتّی یُسْمع دُعاء المسیح لتقواہ و صدقہ۔ وتنزل ملا ئکۃ النصرۃ ویجعل اللّٰہ الھزیمۃ علی الثعبان وفوجہ منۃ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 11

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 11

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/11/mode/1up


    علی عبدہ۔ فترجع قلوب الناس من الشرک الی التوحید ومن حب الشیطان الی حب اللّٰہ الوحید۔ والی المحویۃ من الغیریۃ۔ والی ترک النفس من الاھواء النفسانیۃ۔ فان الشیطان یدعو الی الھویٰ والقطیعۃ والمسیح یدعو الی الاتحاد والمحویۃ۔ وبینھما عداوۃ ذاتیۃ من الازل واذا غلب المسیح فاختتم عند ذالک محاربات کلھا التی کانت جاریۃ بین العساکر الرحمانیۃ والعساکر الشیطانیۃ۔ فھناک یکون اختتام دور ھٰذہ الدنیا ویستدیر الزمان وترجع الفطرت الانسانیۃ الی ھیئتھا الاولٰی۔ الّا الذین احاطتھم الشقوۃ الازلیۃ۔ فاولٰئک من المحرومین۔ ومن فضل اللّٰہ واحسانہ انہ جعل ھٰذا الفتح علٰی ید المسیح المحمدی لیری الناس انہ اکمل من المسیح الاسرائیلی فی بعض شیونہ وذالک من غیرۃ اللّٰہ التی ھیّجھا النصاریٰ باطراء مسیحھم۔ ولما کان شان المسیح المحمدی کذالک فما اکبر شان نبی ھو من اُمّتہٖ۔ اللّٰھم صلّ علیہ سلامًالا یغادر برکۃ من برکاتک وسَوّد وجوہ اعداء ہ بتائیداتک واٰیاتک اٰمین۔

    الراقم میرزا غلام احمدؐ من مقام القادیان الفنجاب

    لخمس و عشرین من اغسطوس سنہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 12

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 12

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/12/mode/1up


    تتمہ حاشیہ ٹائیٹل پیج متعلقہ خطبہ الہامیہ

    _ _ _ _ _ _ _ Bishops Bourno

    _ _ _ _ _ _ _ _ _ _ Lahore

    _ _ _ _ _ _ _ _ _ _ Aug. 15.01.

    Dear Sir,

    The Lord Jesus Christ was certainly not a lawgiver, in the sense in which Moses was, giving a complete descriptive law about such things as clean and unclean food_ etc. That he did not do this must be evident to any one who reads the New testament with any care or thought whatever. The Mosaic law of meats etc was given in order to develop in the minds of men who were in a very elementary stage of education and religion, the sense of law, and gradually of Holiness and the reverse. It is therefore called in the New testament a 'Schoolmaster to bring us to Christ" (gal iii. 24) for it developed a conseience in men which, when_ _ awakened,could not find rest in any external or purely ceremonial acts but needed an inner righteousness of heart and life. And it was to bring this that christ came, By His life and death he



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 13

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 13

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/13/mode/1up


    both deepened in men's minds the sense of what sin really is and how terrible it is and also showed men how they could be reconciled to God, obtaining forgiveness of sins and also power by the gift of the Holy Spirit to live a new life in real holiness, and in love to God and man. What the characteristics of that new life are, you can see by reading the sermon of the mount St. Mathew Chapters V-VII.

    (اس کا ترجمہ دوسرے صفحہ پر دیکھو)



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 14

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 14

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/14/mode/1up


    ترجمہ

    از مقام بشپس بورن واقعہ لاہور

    مورخہ ۱۵؍ اگست ۱۹۰۱ء ؁

    جناب

    خداوند یسوع مسیح ہرگز شارع نہ تھا جن معنوں میں کہ حضرت موسیٰ صاحب شریعت تھا۔ جس نے ایک کامل مفصل شریعت ایسے امور کے متعلق دی کہ مثلاً کھانے کے لئے حلال کیا ہے اور حرام کیا ہے وغیرہ۔ کوئی شخص انجیل کو بغیر غور کے سرسری نگاہ سے بھی دیکھے تو اس پر ضرور ظاہر ہو جائے گا کہ یسوع مسیح صاحب شریعت نہ تھا۔

    موسیٰ کی شریعت کھانے وغیرہ امور کے متعلق اس واسطے نازل ہوئی تھی کہ انسان کا دل تربیت پاکر شریعت کے مفہوم کو پالے اور رفتہ رفتہ مقدس اور غیر مقدس کو سمجھنے لگے کیونکہ انسان اس وقت تعلیم و مذہب کی ابتدائی منزل میں تھا۔ اس لئے انجیل میں کہا گیا ہے کہ موسیٰ کی شریعت ایک اُستاد تھی جو ہمیں مسیح تک لائی کیونکہ اس شریعت نے انسان کے دل میں ایک ایسی فطرت پیدا کر دی جو کہ ترقی پاکر صرف بیرونی اور رسمی اعمال پر قانع نہ ہوئی بلکہ دل اوررُوح کی اندرونی راستی کی تلاش کرنے والی ہوئی۔ اس راستی کے لانے کے واسطے مسیح آیا۔ اپنی زندگی اور موت کے ذریعہ سے اُس نے لوگوں کے دلوں میں یہ سمجھ ڈال دی کہ گناہ کیا ہے اور وہ کیسا خوفناک ہے اور گناہوں کی معافی حاصل کر کے اور روح القدس کے عطیہ سے ہم تقدس کی نئی زندگی پاکر اورخدا اور انسان کے درمیان محبت قائم کر کے خدا کو پھر راضی کر سکتے ہیں۔متی باب ۵ و۷ میں پہاڑی تعلیم کے پڑھنے سے معلوم ہو سکتا ہے کہ اس نئی زندگی کا طرز طریق کیاتھا۔ ( دستخط جے اے لیفرائے بشپ لاہور)



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 15

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 15

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/15/mode/1up


    ضمیمہؔ خطبہ الہامیّہ

    نحمدہٗ نصلّی علٰی رسولہ الکریم

    اشتہار چندۂ مَنَارۃ المسیح

    ’’بخرام کہ وقت تو نزدیک رسید و پائے محمد یاں بر منار بلند تر محکم افتاد‘‘

    (یہ وہ الہام ہے جو براہین احمدیہ میں درج ہے جس کو شائع ہوئے بیس برس گذر گئے)

    خدا تعالیٰ کے فضل وکرم سے قادیاں کی مسجد جو میرے والد صاحب مرحوم نے مختصر طور پر دو بازاروں کے وسط میں ایک اونچی زمین پر بنائی تھی اب شوکتِ اسلام کے لئے بہت وسیع کی گئی اور بعض حصہ عمارات کے اَور بھی بنائے گئے ہیں لہٰذا اب یہ مسجد اور رنگ پکڑ گئی ہے۔ یعنی پہلے اس مسجد کی وسعت صرف اس قدر تھی کہ بمشکل دو سو آدمی اس میں نماز پڑھ سکتا تھا لیکن اب دوہزار کے قریب اس میں نماز پڑھ سکتا ہے اور غالباً آئندہ اور بھی یہ مسجد وسیع ہو جائے گی۔ میرے دعویٰ کی ابتدائی حالت میں اس مسجد میں جمعہ کی نماز کے لئے زیادہ سے زیادہ پندرہ یا بیس آدمی جمع ہوا کرتے تھے لیکن اب خدا تعالیٰ کا یہ فضل ہے کہ تین سو یا چار سو نمازی ایک معمولی اندازہ ہے اور کبھی سات سو یا آٹھ سو تک بھی نمازیوں کی نوبت پہنچ جاتی ہے۔ لوگ دُور دُور سے نماز پڑھنے کے لئے آتے ہیں۔یہ عجیب خدا تعالیٰ کی قدرت ہے کہ پنجاب اور ہندوستان کے مولویوں نے بہت زور مارا کہ ہمارا سلسلہ ٹوٹ جائے اور درہم برہم ہو جائے لیکن جوں جوں وہ بیخ کنی کے لئے کوشش کرتے گئے اَور بھی ترقی ہوتی گئی اور ایک خارق عادت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 16

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 16

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/16/mode/1up


    طور پر یہ سلسلہ اس ملک میں پھیل گیا۔ سو یہ ایسا امر ہے کہ ان کے لئے جو آنکھیں رکھتے ہیں ایک نشان ہے۔ اگر یہ انسان کا کاروبار ہوتا تو ان مولویوں کی کوششوں سے کب کا نابود ہو جاتا۔ مگر چونکہ یہ خدا کا کاروبار اور اس کے ہاتھ سے تھا اس لئے انسانی مزاحمت اس کو روک نہیں سکی۔

    ابؔ اس مسجد کی تکمیل کے لئے ایک اَور تجویز قرار پائی ہے اور وہ یہ ہے کہ مسجد کی شرقی طرف جیسا کہ احادیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا منشاء ہے ایک نہایت اونچا منارہ بنایا جائے اور وہ منارہ تین کاموں کے لئے مخصوص ہو:۔

    اوّل یہ کہ تامؤذن اس پر چڑھ کر پنج وقت بانگِ نماز دیا کرے اور تاخدا کے پاک نام کی اونچی آواز سے دن رات میں پانچ دفعہ تبلیغ ہو اور تا مختصر لفظوں میں پنج وقت ہماری طرف سے انسانوں کو یہ ندا کی جائے کہ وہ ازلی اور ابدی خدا جس کی تمام انسانوں کو پرستش کرنی چاہئے صرف وہی خدا ہے جس کی طرف اس کا برگزیدہ اور پاک رسول محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم رہنمائی کرتا ہے۔ اس کے سوا نہ زمین میں نہ آسمان میں اَور کوئی خدا نہیں۔

    دوسرا مطلب اس منارہ سے یہ ہوگا کہ اس منارہ کی دیوار کے کسی بہت اونچے حصے پر ایک بڑا لالٹین نصب کر دیا جائے گا جس کی قریباً ایک3 سو روپیہ یا کچھ زیادہ قیمت ہوگی۔ یہ روشنی انسانوں کی آنکھیں روشن کرنے کے لئے دُور دُور جائے گی۔

    تیسرا مطلب اس منارہ سے یہ ہوگا کہ اس منارہ کی دیوار کے کسی اونچے حصے پر ایک بڑا گھنٹہ جو چار سو یا پانسو روپیہ کی قیمت کا ہوگا نصب کر دیا جائے گا تا انسان اپنے وقت کو پہچانیں اور انسانوں کووقت شناسی کی طرف توجہ ہو۔

    یہ تینوں کام جو اس منارہ کے ذریعہ سے جاری ہوں گے ان کے اندر تین حقیقتیں مخفی ہیں۔ اوّل یہ کہ بانگ جو پانچ وقت اونچی آواز سے لوگوں کو پہنچائی جائے گی اس کے نیچے یہ حقیقت مخفی ہے کہ اب واقعی طور پر وقت آگیا ہے کہ لا الٰہ الا اللّٰہ کی آواز ہر ایک کان تک پہنچے۔ یعنی اب وقت خود بولتا ہے کہ اُس ازلی ابدی زندہ خدا کے سوا جس کی طرف



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 17

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 17

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/17/mode/1up


    پاک رسول محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے رہنمائی کی ہے اور سب خدا جو بنائے گئے ہیں باطل ہیں۔ کیوں باطل ہیں؟ اس لئے کہ اُن کے ماننے والے کوئی برکت اُن سے پا نہیں سکتے۔کوئی نشان دکھا نہیں سکتے۔

    دوسرے وہ لالٹین جو اس منارہ کی دیوار میں نصب کی جائے گی اس کے نیچے حقیقت یہ ہے کہ تا لو گ معلوم کریں کہ آسمانی روشنی کا زمانہ آگیا اور جیسا کہ زمین نے اپنی ایجادوں میں قدم آگے بڑھایا ایسا ہی آسمان نے بھی چاہا کہ اپنے نوروں کو بہت صفائی سے ظاہر کرے تا حقیقت کے طالبوں کے لئے پھر تازگی کے دن آئیں اور ہر ایک آنکھ جو دیکھ سکتی ہے آسمانی روشنی کو دیکھے اوراُس روشنی کے ذریعہ سے غلطیوں سے بچ جائے۔

    تیسرے وہ گھنٹہ جو اس منارہ کے کسی حصہ دیوار میں نصب کرایا جائے گا اس کے نیچے یہ حقیقت مخفی ہے کہ تا لوگ اپنے وقت کو پہچان لیں یعنی سمجھ لیں کہ آسمان کے دروازوں کے کھلنے کا وقت آگیا۔ اب سے زمینی جہادؔ بند کئے گئے اور لڑائیوں کا خاتمہ ہوگیا جیسا کہ حدیثوں میں پہلے لکھا گیا تھا کہ جب مسیح آئے گا تو دین کے لئے لڑنا حرام کیا جائے گا۔ سو آج سے دین کے لئے لڑنا حرام کیا گیا۔ اب اس کے بعد جو دین کے لئے تلوار اُٹھاتا ہے اور غازی نام رکھا کر کافروں کو قتل کرتا ہے وہ خدا اور اس کے رسول کا نافرمان ہے۔ صحیح بخاری کو کھولو اور اُس حدیث کو پڑھو کہ جو مسیح موعود کے حق میں ہے یعنی یضع الحرب جس کے یہ معنے ہیں کہ جب مسیح آئے گاتو جہادی لڑائیوں کا خاتمہ ہو جائے گا۔ سو مسیح آچکا اور یہی ہے جو تم سے بول رہا ہے۔

    غرض حدیث نبوی میں جو مسیح موعود کی نسبت لکھا گیا تھا کہ وہ منارہ بیضاء کے پاس نازل ہوگا اس سے یہی غرض تھی کہ مسیح موعود کے وقت کا یہ نشان ہے کہ اُس وقت بباعث دنیا کے باہمی میل جول کے اور نیز راہوں کے کھلنے اور سہولت ملاقات کی وجہ سے تبلیغ احکام اور دینی روشنی پہنچانا اور ندا کرنا ایسا سہل ہوگا کہ گویا یہ شخص منارہ پر کھڑا ہے۔ یہ اشارہ ریل اور تار اور اگن بوٹ اور انتظام ڈاک کی طرف تھا جس نے تمام دنیا کو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 18

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 18

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/18/mode/1up


    ایک شہر کی مانند کر دیا۔ غرض مسیح کے زمانہ کے لئے منارہ کے لفظ میں یہ اشارہ ہے کہ اُس کی روشنی اور آوا ز جلد تر دنیا میں پھیلے گی۔ اور یہ باتیں کسی اَور نبی کو میسّر نہیں آئیں۔ اور انجیل میں لکھا ہے کہ مسیح کا آنا ایسے زمانہ میں ہوگا جیسا کہ بجلی آسمان کے ایک کنارہ میں چمک کر تمام کناروں کو ایک دم میں روشن کر دیتی ہے یہ بھی اِسی امر کی طرف اشارہ تھا یہی وجہ ہے کہ چونکہ مسیح تمام دنیا کو روشنی پہنچانے آیا ہے اس لئے اُس کو پہلے سے یہ سب سامان دیئے گئے۔ وہ خون بہانے کے لئے نہیں بلکہ تمام دنیا کے لئے صلح کاری کا پیغام لایا ہے۔ اب کیوں انسانوں کے خون کئے جائیں۔ اگر کوئی سچ کا طالب ہے تو وہ خدا کے نشان دیکھے جو صدہا ظہور میں آئے اور آرہے ہیں۔ اور اگر خدا کا طالب نہیں تو اُس کو چھوڑ دو اور اس کے قتل کی فکر میں مت ہو کیونکہ مَیں سچ سچ کہتا ہوں کہ اب وہ آخری دن نزدیک ہے جس سے تمام نبی جو دنیا میں آئے ڈراتے رہے۔

    غرض یہ گھنٹہ جو وقت شناسی کے لئے لگایا جائے گا مسیح کے وقت کیلئے یاد دہانی ہے اور خود اس منارہ کے اندر ہی ایک حقیقت مخفی ہے اور وہ یہ کہ احادیث نبویہ میں متواتر آ چکا ہے کہ مسیح آنے والا صاحب المَنَارہ ہوگایعنی اُس کے زمانہ میں اسلامی سچائی بلندی کے انتہا تک پہنچ جائے گی جو اس منارہ کی مانند ہے جو نہایت اونچا ہو۔ اوردین اسلام سب دینوں پر غالب آجائے گا اُسی کے مانند جیسا کہ کوئی شخص جب ایک بلند منار پر اذان دیتا ہے تو وہ آواز تمام آوازوں پر غالب آجاتی ہے۔ سو مقدّر تھا کہ ایسا ہی مسیح کے دنوں میں ہوگا۔ جیسا کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے۔333۱؂۔ یہ آیت مسیح موعود کے حق میں ہے اور اسلامی حجت کی وہ بلند آوازجس کے نیچے تمام آوازیں دب جائیں وہ ازل سے مسیح کے لئے خاص کی گئی ہے اور قدیم سے مسیح موعود کا قدم اس بلند مینار پر قرار دیا گیا ہے جس سے بڑھ کر اَور کوئی عمارت اونچی نہیں۔ اِسی کی طرف براہین احمدیہ کے اؔ س الہام میں اشارہ ہے جو کتاب مذکور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 19

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 19

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/19/mode/1up


    کے صفحہ ۵۲۲ میں درج ہے۔ اور وہ یہ ہے:۔ ’’بخرام کہ وقت تو نزدیک رسید و پائے محمدیاں برمنار بلند تر محکم افتاد‘‘۔ ایسا ہی مسیح موعود کی مسجد بھی مسجد اقصٰی ہے کیونکہ وہ صدر اسلام سے دُور تر اور انتہائی زمانہ پر ہے۔ اور ایک روایت میں خدا کے پاک نبی نے یہ پیشگوئی کی تھی کہ مسیح موعود کا نزول مسجد اقصٰی کے شرقی منارہ کے قریب ہوگا۔*


    بعض احادیث میں یہ پایا جاتا ہے کہ دمشق کے مشرقی طرف کوئی منارہ ہے جس کے قریب مسیح کا نزول ہوگا۔ سو یہ حدیث ہمارے مطلب سے کچھ منافی نہیں ہے کیونکہ ہم کئی دفعہ بیان کر چکے ہیں کہ ہمارا یہ گاؤں جس کا نام قادیاں ہے اور ہماری یہ مسجد جس کے قریب منارہ طیار ہوگا دمشق سے شرقی طرف ہی واقع ہیں۔ حدیث میں اس بات کی تصریح نہیں کہ وہ منارہ دمشق سے ملحق اور اُس کی ایک جزو ہوگا بلکہ اس کے شرقی طرف واقع ہوگا۔ پھر دوسری حدیث میں اس بات کی تصریح ہے کہ مسجد اقصیٰ کے قریب مسیح کا نزول ہوگا۔ اس سے ثابت ہوتا ہے کہ وہ منارہ یہی مسجد اقصیٰ کا منارہ ہے اوردمشق کا ذکر اُس غرض کے لئے ہے جو ہم ابھی بیان کرچکے ہیں۔ اور مسجد اقصٰی سے مراد اس جگہ یروشلم کی مسجد نہیں ہے بلکہ مسیح موعود کی مسجد ہے جو باعتبار بُعد زمانہ کے خدا کے نزدیک مسجد اقصیٰ ہے۔ اس سے کس کو انکار ہو سکتا ہے کہ جس مسجد کی مسیح موعود بنا کرے وہ اس لائق ہے کہ اس کو مسجد اقصیٰ کہا جائے جس کے معنے ہیں مسجد اَبْعد۔ کیونکہ جب کہ مسیح موعود کا وجود اسلام کے لئے ایک انتہائی دیوار ہے اورمقرر ہے کہ وہ آخری زمانہ میں اور بعید تر حصۂ دنیا میں آسمانی برکات کے ساتھ نازل ہوگا۔ اس لئے ہرایک مسلمان کو یہ ماننا پڑتا ہے کہ مسیح موعود کی مسجد مسجد اقصٰی ہے کیونکہ اسلامی زمانہ کاخط ممتد جو ہے اس کے انتہائی نقطہ پر مسیح موعود کا وجود ہے لہٰذا مسیح موعود کی مسجد پہلے زمانہ سے جو صدر اسلام ہے بہت ہی بعید ہے۔ سو اس وجہ سے مسجد اقصٰی کہلانے کے لائق ہے اور اس مسجد اقصٰی کا منارہ اس



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 20

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 20

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/20/mode/1up


    اَب اے دوستو! یہ منارہ اس لئے طیار کیا جاتا ہے کہ تا حدیث کے موافق مسیح موعود کے زمانہ کی یادگار ہو اور نیز وہ عظیم پیشگوئی پوری ہو جائے جس کا ذکر قرآن شریف کی اِس آیت میں ہے کہ

    لائق ہے کہ تمام میناروں سے اونچا ہو کیونکہ یہ منارہ مسیح موعود کے احقاق حق اور صَرفِ ہمت اور اتمامِ حجّت اور اعلاء ملّت کی جسمانی طور پر تصویرہے پس جیسا کہ اسلامی سچائی مسیح موعودکے ہاتھ سے اعلیٰ درجہ کے ارتفاع تک پہنچ گئی ہے اور مسیح کی ہمت ثریّا سے ایمان گم گشتہ کو واپس لارہی ہے اسی کے مطابق یہ مینار بھی روحانی امور کی عظمت ظاہر کررہا ہے۔ وہ آواز جو دنیا کے ہر چہار گوشہ میں پہنچائی جائے گی وہ روحانی طور پربڑے اونچے مینار کوچاہتی ہے۔ قریبًا بیس برس ہوئے کہ مَیں نے اپنی کتاب براہین احمدیہ میں خدا تعالیٰ کا یہ کلام جومیری زبان پر جاری کیا گیا لکھا تھا۔ یعنی یہ کہ انا انزلناہ قریبًا من القادیان۔ وبالحق انزلناہ وبالحق نزل صدق اللّٰہ ورسوؔ لہ وکان امر اللّٰہ مفعولا۔ دیکھو براہین احمدیہ صفحہ۴۹۸۔ یعنی ہم نے اس مسیح موعود کو قادیان میں اتارا ہے اور وہ ضرورتِ حقہ کے ساتھ اُتارا گیا اور ضرورت حقہ کے ساتھ اترا۔ خدا نے قرآن میں اور رسول نے حدیث میں جو کچھ فرمایاتھا وہ اُس کے آنے سے پورا ہوا۔ اس الہام کے وقت جیسا کہ مَیں کئی دفعہ لکھ چکا ہوں مجھے کشفی طور پر یہ بھی معلوم ہوا تھا کہ یہ الہام قرآن شریف میں لکھا ہوا ہے اور اس وقت عالم کشف میں میرے دل میں اس بات کا یقین تھا کہ قرآن شریف میں تین شہروں کا ذکر ہے۔ یعنی مکّہ اورمدینہ اور قادیاں کا۔ اس بات کو قریباً بیس برس ہوگئے جبکہ مَیں نے براہین احمدیہ میں لکھا تھااب اس رسالہ کی تحریر کے وقت میرے پر یہ منکشف ہوا کہ جو کچھ براہین احمدیہ میں قادیان کے بارے میں کشفی طورپر مَیں نے لکھا یعنی یہ کہ اس کاذکر قرآن شریف میں موجود ہے درحقیقت یہ صحیح بات ہے کیونکہ یہ یقینی امر ہے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 21

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 21

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/21/mode/1up


    33 ؂۱۔اور جس کے منارؔ ہ کا ذکر حدیث میں بھی ہے کہ مسیح کا نزول منارہ کے پاس ہوگا۔ دمشق کا ذکر اس حدیث میں جومسلم نے بیان کی ہے اس غرض سے ہے کہ تین خدا بنانے کی تخم ریزی اوّل دمشق سے شروع ہوئی ہے اور مسیح موعود کا نزول اِس

    قرآن شریف کی یہ آیت کہ33

    33 ۱؂ معراج مکانی اور زمانی دونوں پر مشتمل ہے اور بغیر اس کے معراج ناقص رہتا ہے پس جیسا کہ سیر مکانی کے لحاظ سے خدا تعالیٰ نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو مسجد الحرام سے بیت المقدس تک پہنچا دیا تھا ایسا ہی سیر زمانی کے لحاظ سے آنجناب کو شوکت اسلام کے زمانہ سے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ تھا برکات اسلامی کے زمانہ تک جومسیح موعود کا زمانہ ہے پہنچا دیا*۔پس اس پہلو کے رو سے جو اسلام کے انتہاء زمانہ تک آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا سیر کشفی ہے مسجد اقصٰی سے مراد مسیح موعود کی مسجد ہے جو قادیاں میں واقع ہے جس کی نسبت براہین احمدیہ میں خدا کا کلام یہ ہے۔ مبارک و مبارک وکل امر مبارک یجعل فیہ۔ اور یہ مبارک کا لفظ جو بصیغہ مفعول اور فاعل واقع ہوا قرآن شریف کی آیت بارکنا حولہ کے مطابق ہے۔ پس کچھ شک نہیں جو قرآن شریف میں قادیان کا ذکر ہے جیسا کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے۔33333۔ اس آیت کے ایک تو وہی معنے ہیں جو علماء میں مشہور ہیںیعنی یہ کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے مکانی معراج کا یہ بیان ہے۔ مگر

    شوکت اسلام کا زمانہ جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ تھا اس کا اثر غالب یہ تھا کہ حضرت موسیٰ کی طرح مومنوں کو کفار کے حملہ سے نجات دی اس لئے بیت اللہ کا نام بھی بیت آمن رکھا گیا۔ لیکن زمانہ برکات کا جومسیح موعود کا زمانہ ہے اس کا یہ اثر ہے کہ ہر قسم کے آرام زمین میں پیدا ہو جائیں اور نہ صرف امن بلکہ عیش رغد بھی حاصل ہو۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 22

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 22

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/22/mode/1up


    غرض سے ہے کہ تا تین کے خیالات کومحو کر کے پھر ایک خدا کا جلال دنیا میں قائم کرے۔ پس اِس ایماؔ کے لئے بیان کیا گیا کہ مسیح کا منارہ جس کے قریب اس کا نزول ہوگا دمشق سے شرقی طرف ہے۔ اور یہ بات صحیح بھی ہے کیونکہ قادیان جو ضلع گورداسپور پنجاب میں ہے جو لاہور سے

    کچھ شک نہیں کہ اس کے سوا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک زمانی معراج بھی تھا جس سے یہ غرض تھی کہ تا آپ کی نظر کشفی کا کمال ظاہر ہواور نیز ثابت ہو کہ مسیحی زمانہ کے برکات بھی درحقیقت آپ ہی کے برکات ہیں جو آپ کی توجہ اور ہمتؔ سے پیدا ہوئی ہیں۔ اسی وجہ سے مسیح ایک طور سے آپ ہی کا روپ ہے۔ اور وہ معراج یعنی بلوغ نظر کشفی دنیا کی انتہا تک تھا جو مسیح کے زمانہ سے تعبیر کیا جاتا ہے اور اس معراج میں جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم مسجد الحرام سے مسجد اقصٰی تک سیر فرما ہوئے وہ مسجد اقصٰی یہی ہے جو قادیاں میں بجانب مشرق واقع ہے جس کا نام خدا کے کلام نے مبارک رکھا ہے۔ یہ مسجد جسمانی طور پر مسیح موعود کے حکم سے بنائی گئی ہے اور روحانی طور پر مسیح موعود کے برکات اور کمالات کی تصویر ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے بطور موہبت ہیں اور جیسا کہ مسجد الحرام کی روحانیت حضرت آدم اور حضرت ابراہیم کے کمالات ہیں اور بیت المقدس کی روحانیت انبیاء بنی اسرائیل کے کمالات ہیں ایسا ہی مسیح موعود کی یہ مسجد اقصیٰ جس کا قرآن شریف میں ذکر ہے اس کے روحانی کمالات کی تصویر ہے۔

    پس اس تحقیق سے معلوم ہوا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی معراج میں زمانہ گذشتہ کی طرف صعود ہے اور زمانہ آئندہ کی طرف نزول ہے اور ماحصل اس معراج کا یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم خیرالاولین والآخرین ہیں۔ معراج جو مسجد الحرام سے شروع ہوا اِس میں یہ اشارہ ہے کہ صفی اللہ آدم کے تمام کمالات اور ابراہیم خلیل اللہ کے تمام کمالات آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم میں موجود تھے اور پھر اس جگہ سے قدم آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم مکانی سیر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 23

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 23

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/23/mode/1up


    گوشہ مغرب اور جنوب میں واقع ہے وہ دمشق سے ٹھیکؔ ٹھیک شرقی جانب پڑی ہے۔ پس اِس سے ثابت ہوا کہ یہ منارۃ المسیح بھی دمشق سے شرقی جانب واقع ہے۔ ہرایک طالبِ حق کو چاہئے کہ دمشق کے لفظ پر خوب غور کرے کہ اِس میں حکمت کیا ہے کہ یہ

    کے طور پر بیت المقدس کی طرف گیا اور اس میں یہ اشارہ تھا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم میں تمام اسرائیلی نبیوں کے کمالات بھی موجود ہیں۔ اور پھر اس جگہ سے قدم آنجناب علیہ السلام زمانی سیر کے طور پر اس مسجد اقصٰی تک گیا جو مسیح موعود کی مسجد ہے یعنی کشفی نظر اس آخری زمانہ تک جو مسیح موعود کا زمانہ کہلاتا ہے پہنچ گئی۔ یہ اس بات کی طرف اشارہ تھا کہ جو کچھ مسیح موعود کو دیا گیا وہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات میں موجود ہے۔ اور پھر قدم آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم آسمانی سیر کے طور پر اوپر کی طرف گیا اور مرتبہ قَابَ قَوْسَےْن کا پایا۔ یہ اس بات کی طرف اشارہ تھا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم مظہر صفاتِ الٰہیہ اتم اور اکمل طور پر تھے۔ غرض آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا اس قسم کا معراج یعنی مسجد الحرام سے مسجد اقصٰی تک جوزمانی مکانی دونوں رنگ کی سیر تھی اور نیز خدا تعالیٰ کی طرف ایک سیرتھاجو مکان اور زمان دونوں سے پاک تھا۔ اس جدید طرز کی معراج سے غرض یہ تھی کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم خیرالاولین والآخرین ہیں اور نیز خدا تعالیٰ کی طرف سیران کا اس نقطہ ارتفاع پر ہے کہ اِس سے بڑھ کر کسی انسان کوگنجائش نہیں۔ مگر اس حاشیہ میں ہماری صرف یہ غرض ہے کہ جیسا کہ آج سے بیس برس پہلے براہین احمدیہ میں کشفی طور پر لکھا گیا تھا کہ قرآن شریف میں قادیاں کا ذکر ہے۔ یہ کشف نہایت صحیح اور درست تھا کیونکہ زمانی رنگ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا ؔ معراج اور مسجد اقصٰے کی طرف سیرمسجد الحرام سے شروع ہو کر یہ کسی طرح صحیح نہیں ہو سکتا جب تک ایسی مسجد تک آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا سیر تسلیم نہ کیا جائے جو باعتبار بُعد زمانہ کے مسجد اقصٰی ہو۔ اور ظاہر ہے کہ مسیح موعود کا وہ زمانہ ہے جو اسلامی سمندر کا بمقابلہ زمانہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 24

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 24

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/24/mode/1up


    لکھا گیا ہے کہ مسیح موعود دمشق ؔ کے شرقی طرف نازل ہوگا۔ کیونکہ خدا تعالیٰ کی قرار داد باتیں صرف امور اتفاقیہ نہیں ہو سکتے بلکہ ان کے نیچے اسرار اور رموز ہوتے ہیں وجہ یہ کہ خدا تعالیٰ کی تمام باتیں رموز اور اسرار سے پُر ہیں۔

    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے دوسرا کنارہ ہے ابتدا سیر کا جو مسجد الحرام سے بیان کیا گیا اور انتہا سیر کا جو اس بہت دُور مسجد تک مقرر کیا گیا جس کے ارد گرد کو برکت دی گئی۔ یہ برکت دینا اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ زمانہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم میں شوکتِ اسلام ظاہر کی گئی اور حرام کیا گیا کہ کفار کا دست تعدّی اسلام کو مٹادے جیسا کہ آیت 3 ۱؂ سے ظاہر ہے۔لیکن زمانہ مسیح موعود میں جس کا دوسرا نام مہدی بھی ہے تمام قوموں پر اسلام کی برکتیں ثابت کی جائیں گی اور دکھلایا جائے گا کہ ایک اسلام ہی بابرکت مذہب ہے جیسا کہ بیان کیا گیا کہ وہ ایسا برکات کا زمانہ ہوگا کہ دنیا میں صلح کاری کی برکت پھیلے گی اور آسمان اپنے نشانوں کے ساتھ برکتیں دکھلائے گا اور زمین میں طرح طرح کے پھلوں کے دستیاب ہونے اور طرح طرح کے آراموں سے اس قدر برکتیں پھیل جائیں گی جو اس سے پہلے کبھی نہیں پھیلی ہوں گی۔ اسی وجہ سے مسیح موعود اور مہدی معہود کے زمانہ کا نام احادیث میں زمان البرکات ہے جیسا کہ تم دیکھتے ہو کہ ہزار ہا نئی ایجادوں نے کیسی زمین پر برکتیں اور آرام پھیلا دیئے ہیں کیونکہ ریل کے ذریعہ سے مشرق اور مغرب کے میوے ایک جگہ اکٹھے ہو سکتے ہیں اور تار کے ذریعہ سے ہزاروں کوسوں کی خبریں پہنچ جاتی ہیں۔ سفر کی وہ تمام مصیبتیں یکدفعہ دُور ہوگئیں جو پہلے زمانوں میں تھیں۔

    غرض اس زمانہ کا نام جس میں ہم ہیں زمان البرکات ہے لیکن ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ زمان التائیدات اور دفع الآفات تھا اور اُس زمانہ میں خدا تعالیٰ کا بھاری مقصد دفع شر تھا۔ چنانچہ خدا تعالیٰ نے اُس زمانہ میں اسلام کو اپنے قوی ہاتھ سے دشمنوں سے بچایا اور دشمنوں کو یوں ہانک دیا جیسا کہ ایک مرد مضبوط اپنی لاٹھی سے کتّوں کو ہانک دیتا ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 25

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 25

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/25/mode/1up


    اب ہمارے مخالف گو اس دمشقی حدیث کو بار بار پڑھتے ہیں مگر وہ اس کا جواب نہیں دے سکتے کہ یہ جو اس حدیث میں بتلایا گیا ہے کہ مسیح موعود دمشق کی شرقی طرف کے منارہ کے قریب نازل ہوگا اس میں کیا بھید ہے بلکہ انہوں نے محض ایک کہانی کی طرح

    پس چونکہ مسیح اور مہدی موعود کا زمانہ زمان البرکات تھا اسی لئے خدا تعالیٰ نے اس کے حق میں فرمایا بَارَکْنَا حَوْلَہٗ یعنی مسیح موعود کی فرود گاہ کے ارد گرد جہاں نظر ڈالو گے ہر طرف سے برکتیں نظر آئیں گی چنانچہ ہم دیکھتے ہیں کہ زمین کیسی آباد ہوگئی باغ کیسے بکثرت ہوگئے نہریں کیسی بکثرت جاری ہوگئیں تمدنی آرام کی چیزیں کیسی کثرت سے موجود ہوگئیں۔ پس یہ زمینی برکات ہیں۔ اور جیسے اس زمانہ میں زمینی اور آسمانی برکتیں بکثرت ظاہر ہوگئی ہیں ایسا ہی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں تائیدات کا بھی ایک دریا چل رہا تھا۔

    فحاصل البیان ان الزمان زمانان۔ زمان التائیدات ودفع الاٰفات و زمان البرکات والطیبات والیہ اشار عزاسمہ بقولہ 333 ۱؂ فاعلم ان لفظ مسجد الحرام فی قولہ تعالٰی یدل علٰی زمانٍ فیہ ظھرت عزۃ حرمات اللہ بتائید من اللّٰہ وظھرت عزۃ حدودہ واحکامہ و فرائضہ وتَرَاء ت شوکۃ دینہ ورعب ملّتہ۔ وھو زمان نبینا صلی اللّٰہ علیہ وسلم۔ والمسجد الحرام البیت الذی بناہ ابراھیم علیہ السلام فی مکۃ وھو موجود الٰی ھٰذا الوقت حرسہ اللّٰہ من کلّ آفۃ۔ واما قولہ عزّاسمہ بعد ھٰذا القول اعنی33فیدل علٰی زمانٍ فیہ یظھر برکاتٍ فی الارض من کل جھۃ کما ذکرناہ اٰنفا وھو زمان المسیح الموعود والمھدی المعہود والمسجد الاقصٰی ھو المسجد الذی بناہ المسیح الموعود فی القادیان



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 26

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 26

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/26/mode/1up


    اِس حدیث کو سمجھ لیا ہے۔ لیکن یاد رہے کہ یہ کہانی نہیں ہے اور خدا تعالیٰ لغو کاموں سے پاک ہے بلکہ اس حدیث کے ان الفاظ میں جو اول دمشق کا ذکر فرمایا اور پھر اس کے شرقی طرف ایک منارہ قرار دیا ایک عظیم الشان راز ہے اور وہ وہی ہے جوابھی ہم بیان کرچکے ہیں۔ یعنی یہ کہ تثلیث اور تین خداؤں کی بنیاد دمشق سے ہی پڑی تھی۔ کیا ہی منحوس وہ دن تھا جب پولوس یہودی ایک خواب کا منصوبہ بنا کر دمشق میں داخل ہوا اور بعض سادہ لوح عیسائیوں کے پاس یہ ظاہر کیا کہ خداوند مسیح مجھے دکھائی دیا اور اس تعلیم کے شائع کرنے کیلئے ارشاد فرمایا کہ گویا وہ بھی ایک خدا ہے بس وہی خواب تثلیث کے مذہب کی تخم ریزی تھی۔ غرض یہ شرکِ عظیم کا کھیت اول دمشق میں ہی بڑھا اور پھُولا اور پھر یہ زہر اَور اَور جگہوں میں پھیلتی گئی۔ پس چونکہ خدا تعالیٰ کو معلوم تھا کہ انسان کو خدا بنانے کا بنیادی پتھر اول دمشق میں ہی رکھا گیا اِس لئے خدا نے اُس زمانہ کے ذکر کے وقت کہ جب غیرت خدا وندی اس باطل تعلیم کو نابود کرے گی پھر دمشق کا ذکر فرمایا اور کہا کہ مسیح کا منارہ یعنی اُس کے نور کے ظاہر ہونے کی جگہ دمشق کی مشرقی طرف ہے۔ اِس عبارت سے یہ مطلب نہیں تھا کہ وہ منارہ دمشق کی

    سُمّی اَقْصٰی لبُعْدہ من زمان النبوّۃ ولما وقع فی اقصٰی طرفٍ من زمن ابتداء الاسلام فتدبر ھٰذا المقام فانہ اودع اسرارًا من اللّٰہ العلام۔

    خلاصہ کلام یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا معراج تین قسم پر منقسم ہے۔ سیر مکانی اور سیر زمانی اور سیر لامکانی ولا زمانی سَیر مکانی میں اشارہ ہے طرف غلبہ اور فتوحات پر یعنی یہ اشارہ کہ اسلامی ملک مکہ سے بیت المقدس تک پھیلے گا۔ اور سیر زمانی میں اشارہ ہے طرف تعلیمات اور تاثیرات کے یعنی یہ کہ مسیح موعود کا زمانہ بھی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی تاثیرات سے تربیت یافتہ ہوگا جیسا کہ قرآن شریف میں فرمایا ہے 33 ۱؂۔اور سیر لامکانی ولازمانی میں اشارہ ہے طرف اعلیٰ درجہ کے قُرب اللہ اور مدانات کی جس پر دائرہ امکانِ قرب کا ختم ہے۔ فافھم۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 27

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 27

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/27/mode/1up


    ایک جُز ہے اور دمشق میں واقع ہے جیسا کہ بدقسمتی سے سمجھا گیا بلکہ مطلب یہ تھا کہ مسیح موعود کا نور آفتاب کی طرح دمشق کے مشرقی جانب سے طلوع کر کے مغربی تاریکی کو دُور کرے گا اور یہ ایک لطیف اشارہ تھا کیونکہ مسیح کے منارہ کو جس کے قریب اس کا نزول ہے دمشق کے مشرقی طرف قرار دیا گیا اور دمشقی تثلیث کو اس کے مغربی طرف رکھا اور اس طرح آنے والے زمانہ کی نسبت یہ پیشگوئی کی کہ جب مسیح موعود آئے گا تو آفتاب کی طرح جو مشرق سے نکلتا ہے ظہور فرمائے گا اور اس کے مقابل پر تثلیث کا چراغ مردہ جو مغرب کی طرف واقع ہے دن بدن پژ مردہ ہوتا جائے گا کیونکہ مشرق سے نکلنا خدا کی کتابوں سے اقبال کی نشانی قرار دی گئی ہے اور مغرب کی طرف جانا ادبار کی نشانی اور اسی نشانی کی طرف ایما کرنے کے لئے خدا تعالیٰ نے قادیاں کو جو مسیح موعود کا نزول گاہ ہے دمشق سے مشرق کی طرف آباد کیا اور دمشق کو اُس سے مغرب کی طرف رکھا۔ بڑا ؔ دھوکا ہمارے مخالفوں کو یہ لگا ہے کہ انہوں نے حدیث کے لفظوں میں یہ دیکھ کر کہ مسیح موعود اس منارہ کے قریب نازل ہوگا جو دمشق کی شرقی طرف ہے یہ سمجھ لیا کہ وہ منارہ دمشق میں ہی واقع ہے حالانکہ دمشق میں ایسے منارہ کا وجود نہیں اور یہ خیال نہیں کیاکہ اگر کہا جائے کہ اگر مثلاً فلاں جگہ فلاں شہر کے شرقی طرف ہے تو کیا ہمیشہ اس سے یہ مراد ہوا کرتا ہے کہ وہ جگہ اس شہر سے پیوستہ ہے؟ اور اگر حدیث میں ایسے لفظ بھی ہوتے جن سے قطعی طور پر یہی سمجھا جاتا کہ وہ منارہ دمشق کے ساتھ پیوستہ ہے اور دوسرے احتمال کی راہ نہ ہوتی تا ہم ایسا بیان دوسرے قرائن کے مقابل پر قابل قبول نہ ہوتا۔ مگر اب چونکہ حدیث پر غور کرنے سے صاف طور پر سمجھ آتا ہے کہ اس حدیث کا صرف یہ منشا ہے کہ وہ منارہ دمشق کی شرقی طرف ہے نہ درحقیقت اُس شہر کا ایک حصّہ تو دیانت سے بعید اور عقلمندی سے دُور ہے کہ خدا تعالیٰ کی اُن حکمتوں اور بھیدوں کو نظر انداز کر کے جن کو ہم نے اس اشتہار میں بیان کر دیا ہے بیو جہ اس بات پرزور ڈالا جائے کہ وہ منارہ جس کے قریب مسیح کا نزول ہے وہ دمشق میں واقع ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 28

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 28

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/28/mode/1up


    بلکہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس منارہ سے اُس مسجد اقصٰی کا منارہ مُراد لیا ہے جو دمشق سے شرقی طرف واقع ہے یعنی مسیح موعود کی مسجد جو حال میں وسیع کی گئی ہے اور عمارت بھی زیادہ کی گئی اور یہ مسجد فی الحقیقت دمشق سے شرقی طرف واقع ہے۔ اور یہ مسجد صرف اس غرض سے وسیع کی گئی اور بنائی گئی ہے کہ تا دمشقی مفاسد کی اصلاح کرے۔ اور یہ منارہ وہ منارہ ہے جس کی ضرورت احادیثِ نبویہ میں تسلیم کی گئی۔ اور اس منارۃ المسیح کا خرچ دس ہزار روپیہ سے کم نہیں ہے۔ اب جو دوست اس منارہ کی تعمیر کے لئے مدد کریں گے مَیں یقیناًسمجھتا ہوں کہ وہ ایک بھاری خدمت کو انجام دیں گے۔ اور مَیں یقیناًجانتا ہوں کہ ایسے موقع پر خرچ کرنا ہرگز ہرگز ان کے نقصان کا باعث نہیں ہوگا۔ وہ خدا کو قرض دیں گے اور مع سود واپس لیں گے۔ کاش ان کے دل سمجھیں کہ اس کام کی خدا کے نزدیک کس قدر عظمت ہے۔ جس خدا نے منارہ کا حکم دیا ہے اُس نے اِس بات کی طرف اشارہ کر دیا ہے کہ اسلام کی مُردہ حالت میں اِسی جگہ سے زندگی کی رُوح پھونکی جائے گی اور یہ فتح نمایاں کامیدان ہوگا۔ مگر یہ فتح اُن ہتھیاروں کے ساتھ نہیں ہوگی جو انسان بناتے ہیں بلکہ آسمانی حربہ کے ساتھ ہے جس حربہ سے فرشتے کام لیتے ہیں۔

    آج سے انسانی جہاد جو تلوار سے کیا جاتا تھا خدا کے حکم کے ساتھ بند کیا گیا۔ اب اس کے بعد جو شخص کا فر پر تلوار اُٹھاتا ہے اور اپنا نام غازی رکھتا ہے وہ اُس رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی نافرمانی کرتا ہے جس نے آج سے تیرہ سو برس پہلے فرما دیا ہے کہ مسیح موعود کے آنے پر تمام تلوار کے جہاد ختم ہو جائیں گے۔ سو اب میرے ظہور کے بعد



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 29

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 29

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/29/mode/1up


    تلوار کا کوئی جہاد نہیں۔ ہماری طرف سے امان اور صلحکاؔ ری کا سفید جھنڈا بلند کیا گیا ہے۔ خدا تعالیٰ کی طرف دعوت کرنے کی ایک راہ نہیں۔

    پس جس راہ پر نادان لوگ اعتراض کر چکے ہیں خدا تعالیٰ کی حکمت اور مصلحت نہیں چاہتی کہ اُسی راہ کو پھر اختیار کیا جائے۔ اِس کی ایسی ہی مثال ہے کہ جیسے جن نشانوں کی پہلے تکذیب ہو چکی وہ ہمارے سید رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو نہیں دیئے گئے۔

    لہٰذا مسیح موعود اپنی فوج کو اس ممنوع مقام سے پیچھے ہٹ جانے کا حکم دیتا ہے جو بدی کا بدی کے ساتھ مقابلہ کرتا ہے وہ ہم میں سے نہیں ہے۔ اپنے تئیں شریر کے حملہ سے بچاؤ مگر خود شریرانہ مقابلہ مت کرو۔ جو شخص ایک شخص کو اس غرض سے تلخ دوا دیتا ہے کہ تا وہ اچھا ہو جائے وہ اس سے نیکی کرتا ہے ایسے آدمی کی نسبت ہم نہیں کہتے کہ اُس نے بدی کا بدی سے مقابلہ کیا۔ ہر ایک نیکی اور بدی نیت سے ہی پیدا ہوتی ہے۔ پس چاہئے کہ تمہاری نیت کبھی ناپاک نہ ہوتا تم فرشتوں کی طرح ہو جاؤ۔

    یہ اشتہار منارہ کے بننے کے لئے لکھا گیا ہے مگر یاد رہے کہ مسجد کی بعض جگہ کی عمارات بھی ابھی نادرست ہیں اس لئے یہ قرار پایا ہے کہ جو کچھ منارۃ المسیح کے مصارف میں سے بچے گا وہ مسجد کی دوسری عمارت پر لگا دیا جائے گا۔ یہ کام بہت جلدی کا ہے۔ دلوں کو کھولو اور خدا کو راضی کرو۔ یہ روپیہ بہت سی برکتیں ساتھ لے کر پھر آپ لوگوں کی طرف واپس آئے گا مَیں اِس سے زیادہ کہنا نہیں چاہتا۔ اور ختم کرتا ہوں اور خدا کے سپرد۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 30

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 30

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/30/mode/1up


    بالآخر مَیں ایک ضروری امر کی طرف اپنے دوستوں کو توجہ دلاتا ہوں کہ اس منارہ میں ہماری یہ بھی غرض ہے کہ مینار کے اندر یا جیسا کہ مناسب ہو ایک گول کمرہ یا کسی اور وضع کا کمرہ بنا دیا جائے جس میں کم سے کم سو آدمی بیٹھ سکے اور یہ کمرہ وعظ اور مذہبی تقریروں کے لئے کام آئے گاکیونکہ ہمارا ارادہ ہے کہ سال میں ایک یا دو دفعہ قادیاں میں مذہبی تقریروں کا ایک جلسہ ہوا کرے اور اُس جلسہ میں ہر ایک شخص مسلمانوں اور ہندوؤں اور آریوں اور عیسائیوں اور سکھوں میں سے اپنے مذہب کی خوبیاں بیان کرے گا مگر یہ شرط ہوگی کہ دوسرے مذہب پر کسی قسم کا حملہ نہ کرے فقط اپنے مذہب اور اپنے مذہب کی تائید میں جو چاہے تہذیب سے کہے اس لئے لکھا جاتا ہے کہ ہمارے دوست اس اشتہار کو ہر ایک کاریگر معمار کو دکھلائیں اور اگر وہ کوئی عمدہ نمونہ اس مینارہ کاجس میں دونوں مطلب مذکورہ بالا پورے ہو سکتے ہوں* تو بہت جلد ہمیں اس سے اطلاع دیں۔

    والسلام

    خاکسار مرزا غلام احمد از قادیاں

    ۲۸؍ مئی ۱۹۰۰ء ؁

    مطبوعہ ضیاء الاسلام پریس قادیاں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 31

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 31

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/31/mode/1up


    یَاعِبَادَ اللّٰہِ فَکِّرُوْا فِیْ یَوْمِکُمْ ھٰذَا یَوْمِ الْاَضْحٰی ۔ فَاِنَّہٗ

    اے بندگانِ خدا دریں روزشما کہ روز عید قربان است بیندیشید و فکر کنید چراکہ

    اے خدا کے بندو اپنے اس دن میں کہ جو بقر عید کا دن ہے غور کرو اور سوچو کیونکہ

    اُوْدِعَ اَسْرَارًا لِاُولِی النُّھٰی وَتَعْلَمُوْنَ اَنَّ فِیْ ھٰذَا الْیَوْمِ

    دریں قربانی ہا از بہر دانشمنداں راز ہاودیعت نہادہ اند۔ ومعلوم شماست کہ دریں روز

    اِن قربانیوں میں عقلمندوں کیلئے بھید پوشیدہ رکھے گئے ہیں۔ اور آپ لوگوں کو معلوم ہے کہ

    یُضَحّٰی بِکَثِیْرٍ مِنَ الْعَجْمَاوَاتِ۔ وَتُنْحَرُ اٰبَالٌ مِّنَ الْجِمَالِ وَ

    بسیارے از جانوران ذبح کردہ می شوند وگلہ ہائے اشتراں و گلہ ہائے گاواں

    اس دن بہت سے جانور ذبح کئے جاتے ہیں اور کئی گلے اونٹوں کے اور کئی

    خَنَاطِیْلُ مِنَ الْبَقَرَاتِ ۔ وَتُذْبَحُ اَقَاطِیْعُ مِنَ الْغَنَمِ

    مے کشند ۔ ورمہ ہا از گوسپنداں قربانی مے کنند۔ وایں ہمہ از بہر

    گلے گائیوں کے ذبح کرتے ہیں ۔ اور کئی ریوڑ بکریوں کے قربانی کرتے ہیں

    ابْتِغَاءَ مَرْضَاتِ رَبِّ الْکَاءِنَاتِ ۔ وَکَذَالِکَ یُفْعَلُ

    رضا جوئی حق سبحانہ کردہ مے شود ۔ و ہم چنیں از ابتدائے زمانہ

    اور یہ سب کچھ خدا تعالیٰ کی رضا جوئی کے لئے کیا جاتا ہے ۔ اور اسی طرح



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 32

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 32

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/32/mode/1up


    مِنْ اِبْتِدَاءِ زَمَانِ الْاِسْلََامِ ۔ اِلٰی ھٰذِہِ الْاَیَّامِ ۔ وَ

    اسلام تا ایں ایام کردہ مے شود وگمان من این است کہ ایں

    زمانۂ اسلام کے ابتدا سے ان دنوں تک کیا جاتا ہے ۔ اور میرا گمان ہے

    ظَنِّیْ اَنَّ الْاَضَاحِیَ فِیْ شَرِیْعَتِنَا الْغَرَّاءِ ۔ قَدْخَرَجَتْ

    قربانیہا کہ درشریعت روشن مامے کنند از حدّ شمار بیروں ہستند وسبقت بردہ

    کہ یہ قربانیاں جو ہماری اس روشن شریعت میں ہوتی ہیں احاطہ شمار سے

    مِنْ حَدِّ الْاِحْصَاءِ۔ وَفَاقَتْ ضَحَایَا الَّذِیْنَ خَلَوْا مِنْ قَبْلُ

    اند برآں قربانیہا کہ مردمان از امّت ہائے سابقہ کہ امت انبیاء

    باہر ہیں۔ اور ان کو اُن قربانیوں پر سبقت ہے کہ جو نبیوں کی پہلی امتوں کے

    مِنْ اُمَمِ الْاَنْبِیَاءِ ۔ وَبَلَغَتْ کَثْرَۃُ الذَّبَاءِحِ اِلٰی حَدٍّ غُطِّیَ

    علیہم السلام بودند می کردند۔ وکثرت ذبیحہ ہا بحدّے رسیدہ است کہ پوشیدہ شد

    لوگ کیاکرتے تھے اورقربانیوں کی کثرت اس حد تک پہنچ گئی ہے کہ ان کے

    بِہٖ وَجْہُ الْاَرْضِ مِنَ الدِّمَاءِ ۔ حَتّٰی لَوْجُمِعَتْ دِمَاءُ ھَا

    روئے زمین از خون آں ہا۔ بحدّے کہ اگر جمع کردہ شوند آں خون ہا

    خونوں سے زمین کا منہ چھپ گیا ہے۔ یہاں تک کہ اگر اُن کے خون جمع کئے

    وَاُرِیْدُ اِجْرَاءُ ھَا لَجَرَتْ مِنْھَا الْاَنْھَارُ۔ وَسَالَتِ الْبِحَارُ

    و ارادہ کردہ شود کہ آنہارا جاری کنند البتہ از اں ہا نہرہا جاری شوند و دریاہا بروند

    جائیں اور اُن کے جاری کرنے کا ارادہ کیا جائے تو البتہ ان سے نہریں جاری ہو جائیں اور دریا بہ نکلیں

    وَفَاضَتِ الْغُدْرُ وَالْاَوْدِیَۃُ الْکِبَارُ ۔ وَقَدْعُدَّ ھٰذَا

    وتمام زمین ہائے نشیب و وادیہائے بزرگ ازخون رواں گردند ۔ وایں کار در دین ما

    اور زمین کے تمام نشیبوں اور وادیوں میں خون رواں ہونے لگے ۔ اور یہ کام



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 33

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 33

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/33/mode/1up


    الْعَمْلُ فِیْ مِلَّتِنَا مِمَّا یُقَرِّبُ اِلَی اللّٰہِ سُبْحَانَہٗ ۔ وَحُسِبَ

    ازاں کارہا شمارکردہ شدہ است کہ موجب قرب او سبحانہٗ مے باشند۔ و ہمچو آں

    ہمارے دین میں ان کاموں میں سے شمار کیا گیا ہے کہ جو اللہ تعالیٰ کے قرب کا موجب ہوتے ہیں اور اُس

    کَمَطِیْءَۃٍ تُحَاکِی الْبَرْقَ فِی السَّیْرِ وَلُمْعَانہ۔ فَلِاَجْلِ ذَالِکَ

    مرکبے پنداشتہ اند کہ درسیر خود برق رامشابہ باشد و بدر خش آں بماند پس از بہر ہمیں سبب

    سواری کی طرح یہ سمجھے گئے ہیں کہ جو اپنی سیر میں بجلی سے مشابہ ہو جس کو بجلی کی چمک سے مماثلت حاصل ہو اور

    سُمِّیَ الضَّحَایَا قُرْبَانًا ۔ بِمَا وَرَدَ اِنَّھَا تَزِیْدُ قُرْبًا وَلُقْیَانًا۔

    ایں ذبیحہ ہا راقربانی نام نہادہ اند چراکہ در احادیث وارد شدہ کہ آنہا موجب قربت و ملاقات اوسبحانہ ہستند

    اِسی وجہ سے ان ذبح ہونیوالے جانوروں کا نام قربانی رکھا گیا کیونکہ حدیثوں میں آیا ہے کہ یہ قربانیاں خدا تعالیٰ کے قرب اور ملاقات

    کُلَّ مَنْ قَرَّبَ اِخْلَاصًا وَتَعَبُّدًا وَاِیْمَانًا ۔ وَاِنَّھَا مِنْ اَعْظَمِ

    کسے را کہ قربانی بگذارد از روئے اخلاص و خدا پرستی و ایمان داری ۔ وایں قربانی ہا از بزرگتر

    کا موجب ہیں اس شخص کے لئے کہ جو قربانی کو اخلاص اور خدا پرستی اور ایمان داری سے ادا کرتا ہے اور یہ قربانیاں شریعت کی

    نُسُکِ الشَّرِیْعَۃِ ۔ وَلِذَالِکَ سُمِّیَتْ بِالنَّسِیْکَۃِ ۔وَالنُّسُکُ

    عبادات شریعت ہستند واز بہر ہمیں وجہ نام اینہا نسیکہ داشتہ اند و نُسُک در زبان عربی

    بزرگتر عبادتوں میں سے ہیں اور اسی لئے قربانی کا نام عربی میں نسیکۃ ہے اور نُسُک کا لفظ عربی زبان میں

    اَلطَّاعَۃُ وَالْعِبَادَۃُ فِی اللِّسَانِ الْعَرَبِیَّۃِ ۔ وَکَذَالِکَ جَاءَ

    بمعنی فرمانبرداری و بندگی آمدہ ۔ ہم چنیں ایں لفظ نُسُک

    فرمانبرداری اور بندگی کے معنوں میں آتا ہے اور ایسا ہی یہ لفظ یعنی نُسُک

    لَفْظُ النُّسُکِ بِمَعْنَی ذَبْحِ الذَّبِیْحَۃِ ۔ فَھٰذَ الْاِشْتَرَاکُ

    بمعنی ذبح کردن جانورا نے کہ ذبح کردنی ہستند نیز ہم در لُغت مذکور مستعمل شدہ۔ پس ایں اشتراک

    اُن جانوروں کے ذبح کرنے پر بھی زبان مذکور میں استعمال پاتا ہے جن کا ذبح کرنا مشروع ہے۔ پس یہ اشتراک کہ جو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 34

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 34

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/34/mode/1up


    یَدُلُّ قَطْعًا عَلٰی اَنَّ الْعَابِدَ فِی الْحَقِیْقَۃِ ھُوَالَّذِیْ ذَبَحَ

    در معنی لفظ نسک یافتہ می شود ایں را بریں امر دلالت قطعی است کہ درحقیقت عابدو پرستار ہماں کس تو اند بود کہ

    نسک کے معنوں میں پایا جاتا ہے قطعی طور پر اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ حقیقی پرستاراور سچا عابد وہی شخص ہے

    نَفْسَہٗ وَقُوَاہُ ۔ وَکُلَّ مَنْ اَصْبَاہُ لِرِضٰی رَبِّ الْخَلِیْقَۃِ

    نفس خود را وہمہ قوتہائے خودرا وہمہ آں چیز ہارا کہ دل او بردہ اند و محبوب اوشدہ اند برائے رضا جوئی پروردگار

    جس نے اپنے نفس کو مع اس کی تمام قوتوں اور مع اس کے اُن محبوبوں کے جن کی طرف اُس کا دِل کھینچا گیا ہے اپنے رب کی

    وَ ذَبِّ الْھَوٰی ۔ حَتّٰی تَھَافَتَ وَانْمَحٰی ۔ وَذَابَ

    خود ذبح کردہ است و خواہش نفسانی را دفع کردہ است بحدیکہ آں خواہش پارہ پارہ شدہ بیفتاد وازو نشانے نماند

    رضا جوئی کیلئے ذبح کر ڈالا ہے اور خواہش نفسانی کو دفع کیا یہاں تک کہ تمام خواہشیں پارہ پارہ ہو کر گِر پڑیں اور نابود

    وَغَابَ وَاخْتَفٰی ۔ وَھَبَّتْ عَلَیْہِ عَوَاصِفُ الفَنَاءِ ۔

    وپوشیدہ شد وپنہاں گردید ۔ و برد تند بادہائے فنا ونیستی بوزیدند

    ہوگئیں اور وہ خود بھی گداز ہوگیا اور اسکے وجود کا کچھ نمود نہ رہا اور چھپ گیا اور فنا کی تُند ہوائیں اس پر چلیں اور

    وَسَفَتْ ذَرَّاتِہٖ شَدَاءِدُ ھٰذِہِ الْھَوْجَاءِ ۔ وَمَنْ

    وذرّہ ہائے او را سختی ہائے بادتند از جا ببرد ۔ وہرکہ دریں

    اس کے وجود کے ذرّات کو اس ہوا کے سخت دھکّے اُڑا کر لے گئے ۔ اور جس شخص نے

    فَکَّرَ فِیْ ھٰذَیْنِ الْمَفْھُوْمَیْنِ الْمُشْتَرِکَےْنِ ۔ وَتَدَبَّرَ

    ہر دو مفہوم کہ باہم در لفظ نسک اشتراک می دارند غور کردہ باشد

    ان دونوں مفہوموں میں کہ جو باہم نسک کے لفظ میں مشارکت رکھتے ہیں غور کی ہوگی اور اس مقام کو تدبّر

    الْمَقَامَ بِتَیَقُّظِ الْقَلْبِ وَفَتْحِ الْعَیْنَیْنِ ۔ فَلَا یَبْقٰی

    وایں مقام رابنگاہ تدبّر دیدہ وبہ بیدارئ دل و کشادن ہردو چشم ہمہ پیش وپس آنرا زیر نظر داشتہ باشد۔ پس

    کی نگاہ سے دیکھا ہوگا اور اپنے دل کی بیداری اور دونوں آنکھوں کے کھولنے سے پیش وپس کو زیر نظر رکھا ہوگا پس اُس پر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 35

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 35

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/35/mode/1up


    لَہٗ خِفَاءٌ وَلَا مِرَاءٌ ۔ فِیْ اَنَّ ھٰذَا اِیْمَاءٌ ۔ اِلٰی اَنَّ

    برو پوشیدہ نخواہد ماند و دریں امر ہیچ نزاعے دامن اونخواہد گرفت کہ ایں اشتراک دو معنی کہ در لفظ نُسک موجود

    پوشیدہ نہیں رہے گا اور اس امر میں کسی قسم کی نزاع اس کے دامن کو نہیں پکڑے گی کہ یہ دو معنوں کا اشتراک کہ جو نسک کے

    الْعِبَادَۃَ الْمُنْجِیَۃَ مِنَ الْخَسَارَۃِ ۔ ھِیَ ذَبْحُ النَّفْسِ

    است سوئے ایں راز اشارہ است کہ پرستشے کہ از خسران آخرت نجات دہد آں کشتن نفس امارہ است کہ برائے بدی

    لفظ میں پایا جاتاہے اس بھید کی طرف اشارہ ہے کہ عبادت جو آخرت کے خسارہ سے نجات دیتی ہے وہ اس نفس امارہ کا

    الْاَمَّارَۃِ ۔ وَنَحْرُھَا بِمُدَی الْاِنْقِطَاعِ اِلَی اللّٰہِ

    وبدکاری بسیار دربسیار جوش ہا میدارد و حاکمے است بسیار بد فرما پس نجات دریں است کہ ایں بد فرمارا

    ذبح کرنا ہے کہ جو بُرے کاموں کیلئے زیادہ سے زیادہ جوش رکھتا ہے اور ایسا حاکم ہے کہ ہر وقت بدی کا حکم دیتا رہتا ہے

    ذِی الْاٰ لَاءِ وَالْاَمْرِ وَالْاِمَارَۃِ ۔ مَعَ تَحَمُّلِ اَنْوَاعِ

    بکارد ہائے بریدن از خلق و آرمیدن بحق ذبح کنند وازو سوئے خدائے بگریزند کہ حکومت حقیقی و فرمان روائی بدست قبضۂ قدرت

    پس نجات اس میں ہے کہ اس بُرا حکم دینے والے کو انقطاع الی اللہ کے کاردوں سے ذبح کر دیا جائے اور خلقت سے قطع تعلق کر کے

    الْمَرَارَۃِ ۔ لِتَنْجُوَ النَّفْسُ مِنْ مَوْتِ الْغَرَارَۃِ ۔ وَ

    اوست و با ایں ہمہ از بہر ایں کارگو ناگون تلخی ہارا باید برداشت تانفس ازموت غفلت نجات یابد و

    خدا تعالیٰ کو اپنا مونس اور آرام جان قرار دیا جائے اور اسکے ساتھ انواع اقسام کی تلخیوں کی برداشت بھی کی جائے تا نفس غفلت

    ھٰذَا ھُوَ مَعْنَی الْاِسْلَامِ ۔ وَحَقِیْقَۃُ الْاِنْقِیَادِ التَّامِّ ۔

    ہمیں است معنی اسلام وہمین ست حقیقت اطاعت کاملہ

    کی موت سے نجات پاوے اور یہی اسلام کے معنے ہیں اور یہی کامل اطاعت کی حقیقت ہے

    وَالْمُسْلِمُ مَنْ اَسْلَمَ وَجْھَہٗ لِلّٰہِ رَبِّ الْعَالَمِیْنَ ۔ وَ

    ومسلمان آنکس است کہ برائے خدا تعالیٰ گردن خود ازبہر ذبح شدن نہادہ باشد و

    اور مسلمان وہ ہے جس نے اپنا منہ ذبح ہونے کیلئے خدا تعالیٰ کے آگے رکھ دیا ہو۔ اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 36

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 36

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/36/mode/1up


    لَہٗ نَحَرَ نَاقَۃَ نَفْسِہٖ وَتَلَّھَالِلْجَبِیْنِ ۔ وَمَا نَسِیَ الْحَیْنَ

    شتر مادہ نفس راکشتہ واز بہر ذبح برپیشانی فگندہ و ہیچ وقتے موت خودرا

    اپنے نفس کی اونٹنی کو اس کے لئے قربان کر دیا ہو اور ذبح کے لئے پیشانی کے بل اسکو گرا دیا ہو اور موت سے

    فِیْ حِیْنٍ ۔ فَحَاصِلُ الْکَلَامِ اَنَّ النُّسُکَ وَالضَّحَایَا

    فراموش نہ کردہ پس خلاصہ کلام این است کہ ذبیحہ و قربانی ہا کہ دراسلام مرّوج اند

    ایک دم غافل نہ ہو پس حاصل کلام یہ ہے کہ ذبیحہ اور قربانیاں جو اسلام میں مرّوج ہیں

    فِی الْاِسْلَامِ ۔ ھِیَ تَذْکِرَۃٌ لِّھٰذَا الْمَرَامِ ۔ وَ حث

    آں ہمہ از بہر ہمیں مقصود کہ بذل نفس است یاد دہانی است و

    وہ سب اسی مقصود کے لئے جو بذل نفس ہے بطور یاددہانی ہیں اور

    عَلٰی تَحْصِیْلِ ھٰذَا الْمَقَامِ ۔ وَاِرْھَاصٌ لِحَقِیْقَۃٍ تَحْصُلُ

    برائے حاصل کردن ہمیں مقام ترغیب و تحریص است دبرائے ہمیں حقیقت کہ پس از سلوک تام

    اس مقام کے حاصل کرنے کے لئے ایک ترغیب ہے اور اس حقیقت کے لئے جو سلوک تام کے بعد

    بَعْدَ السُّلُوْکِ التَّامِّ ۔ فَوَجَبَ عَلٰی کُلِّ مُؤْمِنٍ وَّ

    میسر مے شود ارہاص است یعنی نشان چیزے پیش از ظہور چیزے پس برہر مرد مومن و

    حاصل ہوتی ہے ایک ارہاص ہے ۔ پس ہر ایک مرد مومن اور

    مُؤْمِنَۃٍ کَانَ یَبْتَغِیْ رِضَاءَ اللّٰہِ الْوَدُوْدِ ۔ اَنْ

    زن مومنہکہ طالب رضائے خدائے ودود باشد واجب است کہ

    عورت مومنہپر جو خدائے ودود کی رضا کی طالب ہے واجب ہے کہ

    یَّفْھَمَ ھٰذِہِ الْحَقِیْقَۃَ وَیَجْعَلَھَا عَیْنَ الْمَقْصُوْدِ۔

    ایں حقیقت را بفہمد وایں را عین مقصود خود بگرداند

    اس حقیقت کو سمجھے اور اس کو اپنے مقصود کا عین قرار دے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 37

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 37

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/37/mode/1up


    وَیُدْخِلَھَا فِیْ نَفْسِہٖ حَتّٰی تَسْرِیَ فِیْ کُلِّ ذَرَّۃِ الْوَجُوْدِ۔

    ودر نفس خود ایں حقیقت را در آرد تا آنکہ در ہر ذرّہ وجود سرایت کند

    اور اس حقیقت کواپنے نفس کے اندر داخل کرے یہاں تک کہ وہ حقیقت ہر ذرّہ وجودمیں داخل ہو جائے۔

    وَلَا یَھْدَءْ وَلَا یَسْکُنْ قَبْلَ اَدَاءِ ھٰذِہِ الضَّحِیَّۃِ

    و راحت و آرام اختیار نہ کند تا بوقتے کہ ایں قربانی را برائے ربّ معبود خود

    اور راحت اور آرام اختیار نہ کرے جب تک کہ اس قربانی کو اپنے رب معبود کے لئے

    لِلرَّبِّ الْمَعْبُوْدِ ۔ وَلَا یَقْنَعْ بِنَمُوْذَجٍ وَقِشْرٍ

    نگذارد و ہمچو ناداناں و جاہلان محض بر نمونہ و پوست

    ادا نہ کرلے۔ اور جاہلوں اور نادانوں کی طرح صرف نمونہ اور پوست بے مغز

    کَالْجُھَلاءِ وَالْعُمْیَانِ ۔ بَلْ یُؤَدِّیْ حَقِیْقَۃَ

    قناعت نہ ورزد بلکہ باید کہ حقیقت قربانی خود را

    پر قناعت نہ کر بیٹھے بلکہ چاہئے کہ اپنی قربانی کی حقیقت

    اَضْحَاتِہٖ ۔ وَیَقْضِیْ بِجَمِیْعِ حَصَاتِہٖ ۔ وَرُوْحِ تُقَاتِہٖ

    بگذارد ۔ و بہ تمام عقل خود و رُوح پرہیزگاری خود

    کو بجالاوے اور اپنی ساری عقل کے ساتھ اور اپنی پرہیزگاری کی رُوح سے

    رُوْحَ الْقُرْبَانِ ۔ ھٰذَا ھُوَ مُنْتَھٰی سُلُوْکِ السَّالِکِےْنَ۔

    روح قربانی را ادا کند ایں آں درجہ است کہ براں سلوک سالکاں انتہا پذیر مے شود

    قربانی کی رُوح کو ادا کرے۔ یہ وہ درجہ ہے جس پر سالکوں کا سلوک انتہا پذیر ہوتاہے

    وَغَایَۃُ مَقْصَدِ الْعَارِفِیْنَ ۔ وَعَلَیْہِ یَخْتَتِمُ جَمِیْعُ

    ومقصد عارفاں بغایت مطلوب مے رسد ۔ و بریں ختم مے شوند درجہ ہائے

    اور عارفوں کا مقصد اپنی غایت کو پہنچتا ہے ۔ اور اس پرتمام درجے پرہیزگاروں کے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 38

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 38

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/38/mode/1up


    مَدَارِجِ الْاَتْقِیَاءِ ۔ وَبِہٖ یَکْمُلُ سَاءِرُ مَرَاحِلِ الصِّدِّیْقِیْنَ

    پرہیزگاران ۔وبدیں کامل مے شوند منزلہائے راستبازاں و برگزید گان

    ختم ہو جاتے ہیں اور سب منزلیں راستبازوں اور برگزیدوں کی

    وَالْاَصْفِیَاءِ ۔ وَاِلَیْہِ یَنْتَھِیْ سَیْرُ الْاَوْلِیَاءِ ۔ وَاِذَا

    وہمین است کہ منتہائے سیراولیاء است ۔ و چوں

    پوری ہو جاتی ہیں اور یہاں تک پہنچ کر سیر اولیاء کا اپنے انتہائی نقطہ تک جا پہنچتا ہے اور جب

    بَلَغْتَ اِلٰی ھٰذَا فَقَدْ بَلَّغْتَ جُھْدَکَ اِلَی الْاِنْتِھَاءِ۔

    تا ایں مقام برسیدی پس کوشش خود را بدرجہ انتہا رسانیدی

    تو اس مقام تک پہنچ گیا تو تونے اپنی کوشش کو انتہا تک پہنچا دیا

    وَفُزْتَ بِمَرْتَبَۃِ الْفَنَاءِ ۔ فَحِیْنَءِذٍ تَصِلُ شَجَرَۃُ

    وبمرتبۂ فنا فائز شدی ۔ پس دریں وقت درخت سلوک تو

    اور فنا کے مرتبہ تک پہنچ گیا۔ پس اس وقت تیرے سلوک کا درخت

    سُلُوْکِکَ اِلٰی اَتَمِّ النَّمَاءِ ۔ وَتَبْلُغُ عُنُقُ رُوْحِکَ

    درگوالیدن خود بآں درجہ نشوو نما خواہد رسید کہ درجۂ کاملہ است و گردن رُوح تو

    اپنے کامل نشو ونما تک پہنچ جائے گا اور تیری رُوح کی گردن

    اِلٰی لُعَاعِ رَوْضَۃِ الْقُدْسِ وَالْکِبْرِیَاءِ ۔ کَالنَّاقَۃِ

    تاسبزہ نرم روضہ قدس و بزرگی منتہی خواہد شد ۔ و آں شتر مادہ

    تقدس اور بزرگی کے مرغزار کے نرم سبزہ تک پہنچ جائے گی ۔ اُس اونٹنی کی مانند

    الْعَنْقَاءِ ۔ اِذَا اَوْصَلَتْ عُنُقَھَا اِلٰی الشَّجَرَۃِ الْخَضْرَاءِ۔

    را بماند کہ گردن او دراز باشد و او گردن خود را تا درخت سبز رسانیدہ باشد

    جس کی گردن لمبی ہو اور اُس نے اپنی گردن کو ایک سبز درخت تک پہنچ دیا ہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 39

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 39

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/39/mode/1up


    وَبَعْدَ ذَالِکَ جَذَبَاتٌ وَنَفَحَاتٌ وَتَجَلِّیَاتٌ مِنَ

    و بعد زیں جذبہ ہا ہستند و دمیدن خوشبوہا و تجلّیات از

    اور اس کے بعد حضرت احدیت کے جذبات ہیں اور خوشبوئیں ہیں اور تجلّیات ہیں

    الْحَضْرَۃِ الْاَحْدِیَّۃِ ۔ لِیَقْطَعَ بَعْضَ بَقَایَا عُرُوْقِ

    حضرت احدیّت تا بعض رگ ہائے بشریت را کہ باقی ماندہ باشند

    تا وہ بعض ان رگوں کو کاٹ دے کہ جو بشریت میں سے باقی

    الْبَشَرِیَّۃِ ۔ وَبَعْدَ ذَالِکَ اِحْیَاءٌ وَاِبْقَاءٌ وَاِدْنَاءٌ

    منقطع کند ۔ و بعد زیں زندہ کردن است و باقی داشتن و قریب کردن

    رہ گئی ہوں اور بعد اس کے زندہ کرنا ہے اور باقی رکھنا اور قریب کرنا

    لِلنَّفْسِ الْمُطْمَءِنَّۃِ الرَّاضِیَۃِ الْمَرْضِیَّۃِ الْفَانِیَۃِ ۔

    مرنفس مطمئنہ را کہ او از خدا راضی و خدا ازو راضی است وبمرتبہ فنارسیدہ است

    اس نفس کا جو خدا کے ساتھ آرام پکڑ چکا ہے جو خدا سے راضی اور خدا اس سے راضی اور فنا شدہ ہے

    لِیَسْتَعِدَّ الْعَبْدُ لِقَبُوْلِ الْفَیْضِ بَعْدَ الْحَیَاتِ الثَّانِیَۃِ ۔

    تاکہ بندہ بعد از حیاتِ ثانی قبول فیض را مستعد گردد

    تاکہ یہ بندہ حیاتِ ثانی کے بعد قبول فیض کے لئے مستعد ہو جائے

    وَبَعْدَذَالِکَ یُکْسَی الْاِنْسَانُ الْکَامِلُ حُلَّۃَ الْخِلَافَۃِ

    و بعد زیں درجہ بقا پوشانیدہ مے شود انسان کامل حُلّہ خلافت را

    اور اس کے بعد انسان کامل کو حضرتِ احدیت کی طرف سے خلافت کا پیرایہ پہنایا

    مِنَ الْحَضْرَۃِ ۔ وَ یُصَبَّغُ بصِبْغِ صِفَاتِ الْاُلُوْھِیَّۃِ ۔

    از حضرت عزّت جلّ شانہٗ ورنگین کردہ مے شود برنگ صفاتِ الوہیت

    جاتا ہے اور رنگ دیا جاتا ہے الوہیت کی صفتوں کے ساتھ ۔ اور یہ رنگ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 40

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 40

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/40/mode/1up


    عَلٰی وَجْہِ الظِّلِّیَّۃِ ۔ تَحْقِیْقًا لِّمَقَامِ الْخِلَافَۃِ ۔ وَبَعْدَ

    بر طریق ظلّیت تا مرتبۂ خلافت متحقق گردد۔ وپس

    ظلی طور پر ہوتا ہے تا مقام خلافت متحقق ہو جائے اور پھر

    ذَالِکَ یَنْزِلُ اِلَی الْخَلْقِ لِیَجْذِ بَھُمْ اِلَی الرُّوْحَانِیَّۃِ ۔

    زیں فرود می آید سوئے مخلوق تااوشاں را سوئے روحانیت بکشد

    اس کے بعد خلقت کی طرف اترتا ہے تا اُن کو روحانیت کی طرف کھینچے

    وَیُخْرِجَھُمْ مِنَ الظُّلُمَاتِ الْاَرْضِیَّۃِ ۔ اِلَی الْاَنْوَارِ

    و تا اوشاں را از تاریکی ہائے زمینی بیروں آوردہ سوئے نورہائے آسمانی

    اور زمین کی تاریکیوں سے باہر لاکر آسمانی نوروں کی طرف

    السَّمَاوِیَّۃِ ۔ وَیُجْعَلُ وَارِثًا لِکُلِّ مَنْ مَّضٰی مِنْ

    ببرد ۔ و ایں انسان وارث کردہ می شود ہمہ آں کسان را

    لے جائے اور یہ انسان اُن سب کا وارث کیا جاتا ہے

    قَبْلِہٖ مِنَ النَّبِیِّیْنَ وَالصِّدِّیْقِیْنَ وَاَھْلِ الْعِلْمِ

    کہ پیش زو گذشتہ اند از انبیاء و صدّیقان و اہل علم

    جو نبیوں اور صدیقوں اور اہل علم

    وَالدِّرَایَۃِ ۔ وَشُمُوْسِ الْقُرْبِ وَالْوَلَایَۃِ ۔ وَیُعْطٰی

    و درایت۔ وآفتاب ہائے قرب و ولایت ۔ و دادہ می شود

    اور درایت میں سے اور قرب اور ولایت کے سورجوں میں سے اس سے پہلے

    لَہٗ عِلْمُ الْاَوَّلِےْنَ ۔ وَمَعَارِفُ السَّابِقِیْنَ ۔ مِنْ

    او را علم اوّلین و معرفت ہائے سابقین از

    گذر چکے ہیں اور دیا جاتا ہے اس کو علم اوّلین کا اور معارف گذشتہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 41

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 41

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/41/mode/1up


    اُولِی الْاَبْصَارِ وَحُکَمَاءِ الْمِلَّۃ ۔ تَحْقِیْقًا لِمَقَامِ الْوَرَاثَۃِ ۔

    صاحبان چشم و حکیمان ملّت تا ثابت شود کہ او وارث اوشان است

    اہل بصیرت اور حکماء ملّت کے تا اس کے لئے مقام وراثت کا متحقق ہو جائے

    ثُمَّ یَمْکُثُ ھٰذَا الْعَبْدُ فِی الْاَرْضِ اِلٰی مُدَّۃٍ شَاءَ

    بعد زاں ایں بندہ بر زمین توقف مے کند تا مدّتے کہ خدا تعالیٰ

    پھر یہ بندہ زمین پر ایک مدت تک جو اُس کے رب کے

    رَبُّہٗ رَبُّ الْعِزَّۃِ ۔ لِیُنِیْرَ الْخَلْقَ بِنُوْرِ الْھِدَایَۃِ ۔ وَ

    خواستہ است تاکہ مخلوق را بنور ہدایت منور گرداند و

    ارادہ میں ہے توقف کرتا ہے تاکہ مخلوق کو نور ہدایت کے ساتھ منور کرے اور

    اِذَا اَنَارَ النَّاسَ بِنُوْرِ رَبِّہٖ اَوْ بَلَّغَ الْاَمْرَ بِقَدَرِ الْکِفَایَۃِ

    چوں مردم را بنور پروردگار خود منور کرد یا امر را بقدر کفایت تبلیغ فرمود

    جب خلقت کو اپنے رب کے نور کے ساتھ روشن کر چکا یا امر تبلیغ کو بقدر کفایت پورا کر دیا

    فَحِیْنَءِذٍ یَتِمُّ اسْمُہٗ وَیَدْعُوْہُ رَبُّہٗ وَیُرْفَعُ رُوْحُہٗ

    پس دریں وقت نام او تمام مے شود و می خواند او را خدائے او و رُوح او سوئے

    پس اُس وقت اس کا نام پورا ہو جاتا ہے اور اُسکا رب اس کو بلاتا ہے اور اس کی رُوح اُس کے

    اِلٰی نُقْطَتِہِ النَّفْسِیَّۃِ ۔ وَھٰذَا ھُوَ مَعْنَی الرَّفْعِ

    نقطہ او کہ نفسی است برداشتہ میشود و ہمیں است معنی رفع

    نقطہ نفسی کی طرف اُٹھائی جاتی ہے اور یہی رفع کے معنے ہیں اُن کے نزدیک

    عِنْدَ اَھْلِ الْعِلْمِ وَالْمَعْرِفَۃِ ۔ وَالْمَرْفُوْعُ مَنْ یُّسْقٰی

    نزد اہل علم و معرفت ۔ و کسے کہ رفع او سوئے خداگردید

    جو اہل علم اور معرفت ہیں اور مرفوع وہ ہے جس کو اُس محبوب



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 42

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 42

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/42/mode/1up


    کَاْسُ الوِصَالِ ۔ مِنْ اَیْدِی الْمَحْبُوْبِ الَّذِیْ ھُوَ لُجَّۃُؔ

    او را جام وصال آں محبوب حقیقی مے نو شانند کہ دریائے حسن وجمال

    کے ہاتھ سے جام وصال پلایا جاتا ہے جوحسن و جمال کا دریا

    الْجَمَالِ ۔ وَیُدْخَلُ تَحْتَ رِدَاءِ الرُّبُوْبِیَّۃِ ۔ مَعَ

    است۔ و داخل کردہ مے شود زیر چادر ربوبیّت با آنکہ

    ہے۔ اور ربوبیت کی چادر کے نیچے داخل کیا جاتا ہے باوجود اس بات کے

    الْعُبُوْدِیَّۃِ الْاَبَدِیَّۃِ ۔ وَھٰذَا اٰخِرُ مَقَامٍ یَبْلُغُہٗ

    عبودیت او بطور ابدی مے ماند و ایں آں آخر مقام است

    کہ عبودیت ابدی طور پر رہتی ہے اور یہ وہ آخری مقام ہے

    طَالِبُ الْحَقِّ فِی النَّشْأَ ۃِ الْاِنْسَانِیَّۃِ ۔ فَلا تَغْفُلُوْا

    کہ طالب حق در پیدائش انسانی او را مے یابد ۔ پس ازیں مقام

    جس تک ایک حق کا طالب انسانی پیدائش میں پہنچ سکتا ہے پس اس مقام سے

    عَنْ ھٰذَا الْمَقَامِ یَاکَافَّۃَ الْبَرَایَا ۔ وَلَا عَنِ السِّرِّ

    غافل مشوید اے گروہ مخلوق ۔ و نہ ازاں راز غافل شوید

    غافل مت ہو اے مخلوق کے گروہ اور نہ اس بھید سے غافل ہو

    الَّذِیْ یُوْجَدُ فِی الضَّحَایَا ۔ وَاجْعَلُوا الضَّحَایَا۔

    کہ در قربانی ہا یافتہ مے شود ۔ و قربانی ہا را

    جو قربانیوں میں پایا جاتا ہے ۔ اور قربانیوں کو

    لِرُؤْیَۃِ تِلْکَ الْحَقِیْقَۃِ کَالْمَرَایَا ۔ وَلَا تَذْھَلُوْا

    برائے دیدن ایں حقیقت آئینہ ہا بگردانید و ایں وصیّت را

    اس حقیقت کے دیکھنے کے لئے آئینوں کی طرح بنا دو اور ان وصیتوں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 43

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 43

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/43/mode/1up


    عَنْ ھٰذِہِ الْوَصَایَا ۔ وَلَا تَکُوْنُوْا کَالَّذِیْنَ نَسُوْا

    فراموش نکنید و ہمچو آں مردم مشوید کہ

    کومت بھلاؤ اور ان لوگوں کی طرح مت ہو جاؤ جنہوں نے

    رَبَّھُمْ وَالْمَنَایَا ۔ وَقَدْ اُشِیْرَ اِلٰی ھٰذَا السِّرِّ

    خدائے خودرا و موت خود را فراموش کردہ اند۔ و بہ تحقیق اشارہ کردہ شدہ است

    اپنے خدا اور اپنی موت کو بھلا رکھا ہے اور اس پوشیدہ بھید کی طرف

    الْمَکْتُومِ ۔ فِیْ کَلَامِ رَبِّنَا الْقَیُّوْمِ ۔ فَقَالَ وَھُوَ

    در کلام خدائے قیّوم سوئے ایں راز پوشیدہ ۔ پس او تعالیٰ گفت و او

    خدا تعالیٰ کی کلام میں اشارت کی گئی ہے۔ چنانچہ خدا جو

    اَصْدَقُ الصَّادِقِیْنَ ۔ 3

    اصدق الصادقین است کہ بگو کہ بہ تحقیق نماز من و عبادت من و قربانی من

    اصدق الصادقین ہے اپنے رسول کو فرماتا ہے کہ ان لوگوں کو کہہ دے کہ میری نماز اور میری عبادت

    33 ۱؂۔ فَانْظُرْ

    و زندگی من و مُردن من برائے خدائے ربّ عالمیان است ۔ پس بہ بیں

    اور میری قربانی اور میری زندگی اور میری موت سب اس خدا کیلئے ہے جو پروردگار عالمیاں ہے پس دیکھ

    کَیْفَ فَسَّرَ النُّسُکَ بِلَفْظِ الْمَحْیَا وَالْمَمَاتِ ۔

    کہ چگونہ لفظ نُسُک را بلفظ محیا و ممات تفسیر کردہ

    کہ کیونکر نُسُک کے لفظ کی حیات اور ممات کے لفظ سے تفسیر کی ہے

    وَاَشَارَ بِہٖ اِلٰی حَقِیْقَۃِ الْاَضْحَاۃِ ۔ فَفَکِّرُوْا فِیْہِ

    وبدیں تفسیر سوئے حقیقتِ قربانی اشارت نمودہ ۔ پس دریں نکتہ بیند یشید

    اور اس تفسیر سے قربانی کی حقیقت کی طرف اشارہ کیا ہے پس اے عقلمندو !



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 44

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 44

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/44/mode/1up


    یَاذَوِی الْحَصَاۃِ ۔ وَمَنْ ضَحّٰی مَعَ عِلْمِ حَقِیْقَۃِ

    اے صاحبان عقل ۔ وہرکہ قربانی کرد و او را علم ایں امربود کہ حقیقت ایں

    اس میں غور کرو اور جس نے اپنی قربانی کی حقیقت کو معلوم کر کے قربانی ادا کی

    ضَحِیَّتِہٖ ۔ وَصِدْقِ طَوِیَّتِہٖ ۔ وَخُلُوْصِ نِیَّتِہٖ۔

    قربانی چیست وصدق دل وخلوص نیت می داشت

    اور صدق دل اور خلوص نیت کے ساتھ ادا کی

    فَقَدْ ضَحّٰی بِنَفْسِہٖ وَمُھْجَتِہٖ ۔ وَاَبْنَاءِ ہٖ وَحَفَدَتِہٖ ۔

    پس بہ تحقیق او قربانی جان خود و فرزندان خود کردہ است

    پس بہ تحقیق اس نے اپنی جان اور اپنے بیٹوں اور اپنے پوتوں کی قربانی کر دی

    وَلَہٗ اجر عظیم ۔ کأجر ابراھیم عند ربّہ

    و مر او را اجرے است بزرگ۔ ہمچو اجر ابراہیم نزد رب کریم

    اور اس کے لئے اجر بزرگ ہے جیسا کہ ابراہیم کے لئے اس کے رب کے نزدیک اجر تھا

    الکریم ۔ والیہ اشار سَیّدنا المصطفٰی ۔ و

    وسوئے ایں اشارہ کردہ است سردار ما کہ برگزیدہ است و

    اور اسی کی طرف ہمارے سید برگزیدہ اور رسول برگزیدہ نے

    رسولنا المجتبٰی ۔ وامام المتقین ۔ وخاتم

    رسول ما کہ چیدہ است وامام پرہیزگاراں وخاتم الانبیاء

    جو پرہیزگاروں کا امام اور انبیاء کا خاتم ہے

    النبیین ۔ وقال وھوبعد اللّٰہ اصدق الصادقین۔

    ست وفرمود و او بعد از خدا صادق ترین صادقان است

    اشارہ کیا اور فرمایا اور وہ خداکے بعد سب سچوں سے زیادہ تر سچا ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 45

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 45

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/45/mode/1up


    انّ الضحَایا ھی المطایا ۔ توصل الی رَبّ البرایا ۔

    بہ تحقیق قربانی ہاکہ ہستند ہماں سواری ہا ہستند کہ سوئے خدا تعالیٰ می برند

    بہ تحقیق قربانیاں وہی سواریاں ہیں کہ جو خدا تعالیٰ تک پہنچاتی ہیں

    وتمحوالخطایا ۔ وتدفع البلایا ۔ ھٰذا ما بلغنا

    وخطاہا را محومی کنند وبلاہا را دفع می کنند ۔ ایں آں امر است کہ از

    اور خطاؤں کو محو کرتی ہیں اور بلاؤں کو دور کرتی ہیں یہ وہ باتیں ہیں جو ہمیں پیغمبر خدا

    من خیر البریۃ ۔ علیہ صلواۃ اللّٰہ والبرکات

    بہترین مخلوق یعنی پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم بما رسیدہ است۔ برو درود خدا و برکات

    صلی اللہ علیہ وسلم سے پہنچیں جو سب مخلوق سے بہتر ہیں ان پر خدا تعالیٰ کا سلام اور برکتیں ہوں

    السنیّۃ ۔ واِنّہٗ أومأ فیہ الٰی حکم الضحیّۃ ۔

    بزرگ باد و بہ تحقیق او اشارہ کردہ است دریں حدیث سوئے حکمت ہائے قربانی

    اور آنجناب نے ان کلمات میں قربانیوں کی حکمتوں کی طرف فصیح کلموں کے ساتھ

    بکلماتٍ کالدرر البھیّۃ ۔ فالأسف کلَّ الأسف

    بہ سخنانے کہ ہمچو درہائے روشن ہستند پس افسوس و کمال افسوس است

    جو موتیوں کی مانند ہیں اشارہ فرمایا ہے پس افسوس اور کمال افسوس ہے کہ

    انّ اکثر الناس لایعلمون ھٰذہ النکات الخفیّۃ ۔

    کہ اکثر مردم ایں نکتہ ہائے باریک را نہ مے دانند

    اکثر لوگ ان پوشیدہ نکتوں کو نہیں سمجھتے

    ولا یتّبعُون ھٰذہ الوصیّۃ ۔ ولیس عندھم

    و پیروی ایں وصیت نہ مے کنند۔ و نزد ایشاں

    اور اس وصیت کی پیروی نہیں کرتے اور ان کے نزدیک



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 46

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 46

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/46/mode/1up


    معنی العید ۔ من دون الغسل ولبس الجدید۔

    معنی عید بیش زیں نیست کہ خویشتن را بشویند وپوشاک نو بپوشند

    عید کے معنے بجز اس کے اور کچھ نہیں کہ غسل کریں اور نئے کپڑیں پہنیں

    والخضم و القضم مع الاھل والخدم والعبید ۔

    و ایں کہ طعام را بہمہ دہاں وکرانہ ہائے دنداں بخایند با اہل خانہ خود و نوکراں و غلاماں

    اور طعام کو سارے مونہہ کے ساتھ اور دانتوں کے کناروں سے چبا ویں۔ خود اور ان کے اہل و عیال اور

    ثم الخروج بالزینۃ للتعیید کالصنادید ۔ و

    باز بہ آرایش و زینت تمام برائے نماز عید بروں آمدن ہمچو مہتران و

    نوکر اور غلام۔ اور پھر آرائش کے ساتھ نماز عید کیلئے باہر نکلیں جیسے بڑے رئیس ہوتے ہیں اور

    تری الأطائب من الأطعمۃ منتھٰی طربھم فی

    خواہی دید کہ خوشترین طعا م ہا دریں روز غایت خوشی ایشان است

    تو دیکھے گا کہ اچھے کھانوں میں اس دن ان کی سب سے بڑھ کر خوشی ہے

    ھٰذا الیوم ۔ والنفائس من الالبسۃ غایۃ

    و نفیس ترین لباس ہا غایت حاجت ایشاں است

    اور ایسا ہی اچھی اور نفیس پوشاکوں میں انتہائی مرتبہ ان کی حاجتوں

    اربھم لاراءۃ القوم ۔ ولا یدرون ماالاضحاۃ ۔

    تا قوم را نمایند و نہ مے دانند کہ قربانی چیست

    کا ہے تا قوم کو دکھلائیں اور نہیں جانتے کہ قربانی کیا چیز ہے۔

    ولایّ غرضٍ یُذبح الغنم والبقرات ۔ و

    واز برائے کدام غرض گوسپنداں و گاواں ذبح می کنند ۔ و

    اور کس غرض کے لئے بکریاں اور گائیاں ذبح کی جاتی ہیں۔ اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 47

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 47

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/47/mode/1up


    عندھم عید ھم من البکرۃ الی العشیّ ۔ لیس الا

    نزد ایشاں عیدایشاں از با مداد تاشب جزیں نیست کہ

    ان کے نزدیک ان کی عید فجر سے لے کر عشاء کے وقت تک محض اس لئے ہے کہ

    للاکل والشرب والعیش الھنیّ ۔ واللباس البھیّ۔

    خوردہ شود و نوشیدہ شود و درعیش خوشگوار گذرانیدہ شود و نیز لباس خوش پوشیدن

    خوب کھایا جائے اور پیا جائے اور عیش خوشگوار کیا جائے اور عمدہ لباس پہنا جائے

    والفرس الشریّ ۔ واللحم الطریّ ۔ وما ترٰی

    وبراسپ جہندہ سوار شدن وگوشت تازہ خوردن ودریں روز شاں

    اور چالاک گھوڑوں پر سواری کی جائے اور گوشت تازہ کھایا جائے اور اس دن ان کا کام بجز

    عملھم فی یومھم ھٰذا الا اکتساء الناعمات ۔

    کارشاں جزیں نخواہی دید کہ پارچات نرم بپوشند

    اس کے تو نہیں دیکھے گا کہ نرم اور ملائم کپڑے پہنیں

    والمشط والاکتحال وتضمیخ الملبوسات ۔

    وشانہ کنند و سرمہ درچشم کشند و بر لباس ہائے خود عطر بمالند

    اور بالوں کو کنگھی کریں اور آنکھوں کو سرمہ لگائیں اور پوشاک پر عطر ملیں۔

    وتسویۃ الطرر والذوائب کالنساء المتبرجات ۔

    وطُرّہ ہائے مو و گیسو ہا را ہمچو زنان زینت کنندہ آراستہ کنند

    اور اپنے طرے اور زلفیں خوب صاف کریں جیسا کہ زینت کرنے والی عورتیں کیا کرتی ہیں

    ثم نقراتٍ کنقرۃ الدجاجۃ فی الصلٰوۃ ۔ مع

    باز چند دفعہ منقار زدن درنماز ہمچو ماکیاں کہ برائے دانہ چیدن منقارمی زندوبا ایں ہمہ

    اور پھر مرغی کی طرح جو دانہ پر منقار مارتی ہے چند دفعہ نماز کیلئے حرکت کریں ایسی حرکت جو اس کے ساتھ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 48

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 48

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/48/mode/1up


    عدم الحضور وھجوم الوساوس والشتات ۔ ثم

    ہیچ حضوری در نماز نہ مے باشد ووسوسہ ہا گرد می آیند وپراگندگی زور می کند۔ باز ایں کاراست

    کچھ بھی حصہ حضور نہ ہو اور وسوسے بکثرت ہوں اور دل میں پراگندگی ہو پھر

    التمایل الٰی انواع الاغذیۃ والمطعومات ۔ و

    کہ سوئے انواع اقسام غذاہا و طعام ہا میل می نمایند و

    طرح طرح کی غذاؤں کی طرف جھک جائیں اور طرح طرح کے کھانوں کی طرف اور

    ملأ البطون بالوان النعم کالنعم والعجماوات ۔

    ازاں طعام ہا شکم ہا ہمچو حیوانات و چارپایاں پُر مے کنند

    چارپایوں کی طرح طرح طرح کی نعمتوں سے پیٹ بھر لیں

    والمیل الی الملاھی والملاعب والجھلات ۔

    وسوئے لہو و بازی و کارہائے جہالت میل دل شاں می شود

    اور لہو اور لعب کی طرف میل کریں اور باطل کاموں کی طرف متوجہ ہوں

    وسرح النفوس فی مراتع الشھوات ۔ والرکوب

    و نفس ہائے خود را در چراگاہ ہائے شہوات می گذرانند و سوارشدن

    اور شہوات کی چراگاہوں میں اپنے نفسوں کو چھوڑ دیں اور گھوڑوں پر

    علی الافراس ۔ والعجل والعناس ۔ والجمال

    براسپاں و یکہ ہا ومادہ شتران مضبوط و شتران نر وخچر ہا

    اور یکوں پر اور اونٹوں پر اور اونٹنیوں پر

    والبغال ورقاب الناس ۔ مع انواعٍ من

    وگردن ہائے مردم با قسم ہا از

    اور خچروں پر اور لوگوں کی گردنوں پر سواری کریں کئی قسم کی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 49

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 49

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/49/mode/1up


    التزیینات ۔ وافناء الیوم کلہٖ فی الخزعبیلات ۔

    زینت ہا و سپرد کردن ہمہ روز در کارہائے باطلہ

    زینتوں کے ساتھ اور تمام دن بیہودہ باتوں میں ضائع کرنے میں

    والھدایا من القلایا ۔ والتفاخر بلحوم البقرات

    و ہدیہ ہا از گوشت ہا و فخر کردن بگوشت ہائے گاواں

    اور ایک دوسرے کو گوشت بھیجنے کا تحفہ اور باہم فخر کرنا گائے کے گوشت

    والجدایا ۔ والافراح والمراح والجذبات

    و گوسپنداں و خوشی ہا وانواع شادی و جذبہ ہائے نفس

    اور بکروں کے گوشت کے ساتھ۔ اور خوشیاں اور رنگارنگ کی شادیاں اور نفس کی کششیں

    والجماح ۔ والضحک والقھقھۃ بابداء النواجذ

    و سرکشی و خندہ و قہقہہ بظاہر کردن دندان پسین

    اور سرکشیاں اور ہنسی اور قہقہہ مار کر ہنسنا پچھلے دانتوں کے نکالنے سے

    والثنایا ۔ والتشوق الٰی رقص البغایا ۔ وبوسھن

    ودو دندان پیشین و شوق کردن سوئے رقص زنان بازاری و بوسہ گرفتن ایشان

    اور اگلے دو دانتوں کے نکالنے سے۔ اور شوق کرنا بازاری عورتوں کے رقص کی طرف اور ان کا بوسہ

    وعناقھن ۔ وبعد ھٰذا نطاقھن ۔ فانا للّٰہ علٰی

    وبغل گیری ایشاں و پس ازیں جائے کمر بند ایشاں یعنی بدکاری بایشاں۔ پس بر مصیبت ہائے اسلام

    اور گلے لپٹانا اور بعد اس کے ان کا جائے کمربند۔ پس ہم اسلام کی مصیبتوں پر

    مصائب الاسلام ۔ وانقلاب الایام ۔ ماتت القلوب ۔

    انا للہ می باید گفت وبریں نیز ہم کہ بر روزہائے اسلام گردش آمد دل ہا مردند

    انا للّٰہ پڑھتے ہیں اور نیز دنوں کی گردش پر دل مرگئے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 50

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 50

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/50/mode/1up


    وکثرت الذنوب ۔ واشتدت الکروب ۔ فعند

    وگنہ ہا بسیار شدند وبے قراری ہا سخت شدند پس

    اور گناہ بہت ہوگئے اور بے قراریاں بڑھ گئیں پس اس

    ھٰذہ اللیلۃ الیلاء ۔ وظلمات الھوجاء ۔

    بروقت ایں شب تاریک و تاریکی ہائے باد تند

    اندھیری رات کے وقت اور تند ہوا کی تاریکی کے وقت

    اقتضٰی رحم اللّٰہ نورالسماء* ۔ فانا ذالک

    بخواست رحمت الٰہی نور آسمان را پس من

    خدا کے رحم نے تقاضا کیا کہ آسمان سے نور نازل ہو سو میں

    یہ جو حدیثوں میں لکھا ہے کہ مسیح موعود نازل ہوگا یہ نزول کا لفظ اس اشارہ کیلئے اختیار کیا گیا ہے کہ وہ زمانہ ایسا ہوگا کہ تمام زمین پر تاریکی چھا جائیگی اور دیانت اور امانت اور راستی زمین پر سے اٹھ جائے گی۔ اور زمین ظلم اور جور سے بھر جائیگی۔ تب خدا آسمان سے ایک نور نازل کرے گا اور اس سے زمین کو دوبارہ روشن کر دے گا۔وہ اوپر سے آئے گا کیونکہ نور ہمیشہ اوپر کی طرف سے آتا ہے اور مسیح موعود کا وقت ایسا وقت بیان کیا گیا ہے کہ اس وقت اشاعت اسلام کے تمام اسباب معطل ہو جائیں گے اور مسلمانوں کے دونوں ہاتھ درماندہ ہو جائیں گے کیونکہ خدا کی غیرت اس بات کو چاہے گی کہ اس اعتراض کو اٹھادے اور دفع اور دور کرے جو کہا گیا ہے کہ اسلام تلوار کے ذریعہ سے پھیلایا گیا پس مسیح موعود کے وقت کے لئے یہ حکم ہے کہ تلواروں کو نیام میں کریں اور مذہب کے لئے کوئی شخص تلوار نہ اٹھائے اور اگر اٹھائے گا تو کافروں سے سخت شکست اٹھائے گا اور ذلیل ہوگا۔ جیسا کہ حضرت موسیٰ کی جماعت جن کو انہوں نے مصر سے نکالا تھا ایسی لڑائیوں میں ہمیشہ مغلوب ہوتی رہی جن لڑائیوں کے لئے موسیٰ کے منشاء کے برخلاف انہوں نے پیش قدمی کی۔ سو اب بھی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 51

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 51

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/51/mode/1up


    النور ۔ و المجدد المأمور ۔ والعبد المنصور ۔

    آں نورم و مجددے ہستم کہ بامر الٰہی آمدہ و بندہ مدد یافتہ ہستم

    وہ نور ہوں اور وہ مجدد ہوں کہ جو خدا تعالیٰ کے حکم سے آیا ہے اور بندہ مدد یافتہ ہوں

    والمھدی المعھود ۔والمسیح الموعود ۔وانی

    وآں مہدی ہستم کہ آمدن او معہود بود وآں مسیح ہستم کہ وعدہ آمدن او شدہ بود و من

    اور وہ مہدی ہوں جس کا آنا مقرر ہو چکا ہے اور وہ مسیح ہوں جس کے آنے کا وعدہ تھا اور میں اپنے رب

    نزلت بمنزلۃٍ من ربّی لا یعلمھا احدٌ من الناس ۔

    از پروردگار خود بآں منزلت نزول می دارم کہ ہیچ کس از آدمیان آنرا نمی شناسد

    سے اس مقام پر نازل ہوا ہوں جس کو انسانوں میں سے کوئی نہیں جانتا

    وان سرّی اخفٰی واَنْءَی من اکثر اھل اللّٰہ

    و راز من پوشیدہ و دور تر از اکثر مردان خداست قطع نظر ازینکہ آں راز

    اور میرا بھید اکثر اہل اللہ سے پوشیدہ اور دور تر ہے قطع نظر اس سے کہ

    فضلًا عن عامۃ الاُناس ۔ وانّ مقامی ابعد

    از مردم عامہ پوشیدہ باشد وبہ تحقیق مقام من از دستہائے

    عام لوگوں کو اس سے کچھ اطلاع ہو سکے اور میرا مقام غوطہ لگانے والوں کے

    ایسا ہی ہوگا کیونکہ مسیح موعود کا آسمان سے نازل ہونا اسی رمز سے قرار دیا گیا ہے کہ اس کا ہاتھ زمینی اسباب کوؔ نہیں چھوئے گا۔ اور وہ محض آسمان کے پانی سے اسلام کے باغ کی آبپاشی کرے گا۔ کیونکہ اب خدا تعالیٰ اس معجزہ کو دکھلانا چاہتا ہے کہ اسلام اپنے شائع ہونے میں تلوار اور انسانی اسباب کا محتاج نہیں۔ پس جو شخص باوجود اس صریح ممانعت اور موجودگی حدیث یضع الحربکے پھر تلوار اٹھاتا ہے اور غازی بننا چاہتا ہے گویا وہ ارادہ کرتا ہے کہ اس معجزہ کو مشتبہ کردے جس کا ظاہر کرنا خدا تعالیٰ نے ارادہ فرمایا ہے یعنی بغیرانسانی اسباب کے اسلام کو زمین پر غالب اور محبوب الخلائق بنا دینا۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 52

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 52

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/52/mode/1up


    من ایدی الغوّاصین ۔ وصعودی ارفع من قیاس

    غوطہ زنندگان کہ از بہر گرفتن لولو غوطہ می زنند دور تراست و بالا رفتن من از قیاس

    ہاتھوں سے بہت دور ہے اور میری اوپر چڑھنے کی بلندی قیاس میں نہیں آسکتی

    القائسین ۔ وانّ قدمی ھٰذہٖ اسرع من القلاص

    قیاس کنندگان بلند تراست۔ و ایں قدم من از شتران تیز رو تیز تر مے رود

    اوریہ قدم میرا خدا تعالیٰ کی راہ میں تیز چلنے والے اونٹوں سے تیز تر ہے

    فی مسالک ربّ الناس ۔فلا تقیسونی باحدٍ ولا

    در راہ ہائے پروردگار مردمان پس مرا بدیگرے قیاس مکنید و نہ دیگرے را

    پس مجھے کسی دوسرے کے ساتھ قیاس مت کرو

    احدًا بی ولا تھلکوا انفسکم بالریب والعماس۔

    بمن مقایسہ نمائید و نفس ہائے خود را بہ شک و خصومت ہلاک مکنید

    اور نہ کسی دوسرے کو میرے ساتھ۔ اور اپنے تئیں شک اور جنگ کے ساتھ ہلاک مت کرو

    وانّی لبٌ لا قشرمعہٗ وروحٌ لاجسد معہٗ و

    ومن مغزے ہستم کہ باوے پوستے نیست و روحے ہستم کہ باوے جسدے نیست و من

    اور میں مغز ہوں جس کے ساتھ چھلکا نہیں اور روح ہوں جس کے ساتھ جسم نہیں اور

    شمسٌ لا یحجبھا دخان الشماس۔واطلبوا مثلی

    آفتابے ہستم کہ دخان دشمنی وکینہ او را نمی پوشد ومانند من بجوئید

    وہ سورج ہوں جس کو دشمنی اور کینہ کا دھواں چھپا نہیں سکتا اور کوئی ایسا شخص تلاش کرو جو میری

    ولن تجدوہ وان تطلبوہ بالنبراس ۔ ولا فخر

    و ہرگز نخواہید یافت و اگرچہ باچراغ جویندہ باشید وایں کلمہ فخر نیست

    مانند ہو اور ہرگز نہیں پاؤگے اگرچہ چراغ لے کر بھی ڈھونڈتے رہو اور یہ کوئی فخر نہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 53

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 53

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/53/mode/1up


    ولٰکن تحدیث لنعم اللّٰہ الذی ھو غارسٌ لھٰذا

    مگر شکر نعمت ہائے آں خداست کہ او ایں نونہال را نشانیدہ است

    مگر اس خدا کی نعمتوں کا شکر ہے جس نے اس نونہال کو لگایا ہے۔

    الغراس ۔ وانی غسلت بماء النور وطھرت بعین

    ومن بآب نور غسل دادہ شدم و بچشمہ

    اور میں نور کے پانی کے ساتھ غسل دیا گیا ہوں اور الٰہی پاکیزگی کے چشمہ

    القدس من الاوساخ والادناس ۔ وسمّانی ربّی

    پاکیزگی الٰہی پاکیزہ کردہ شدم از چرکہا و کدورت ہا۔ ونام من رب من

    میں پاکیزہ کیا گیا ہوں اور صاف کیا گیا ہوں تمام میلوں اور کدورتوں سے اور میرے رب نے میرا نام

    احمد فاحمدونی و لا تشتمونی و لا توصلوا امرکم

    احمد نہاد۔ پس ستایش من کنید و مرا دشنام مدہید و امر خود را تا بدرجہ

    احمد رکھا ہے پس میری تعریف کرو اور مجھے دشنام مت دو اور اپنے امر کو ناامیدی کے

    الی الالباس ۔ و من حمدنی وما غادر من نوع

    نومیدی مرسانید وہرکہ ستائش من کرد وقسمے از ستائش نگذاشت

    درجہ تک مت پہنچاؤ اور جس نے میری تعریف کی اور کوئی قسم تعریف کی نہ چھوڑی

    حمدٍ فما مان ۔ و من کذب ھٰذا البیان فقد

    پس او دروغ نہ گفت ومرتکب کذب نشد و ہرکہ تکذیب ایں بیان کرد پس او

    تو اس نے سچ بولا اور جھوٹ کا ارتکاب نہ کیا۔ اور جس نے اس بیان کو جھٹلایا پس اس نے جھوٹ

    مان ۔ واغضب الرحمٰن ۔ فویلٌ للذی شک

    دروغ گفتہ است وخدائے خود را در غضب آوردہ ۔ پس براں شخص واویلاست کہ شک کرد

    بولا ہے اور اپنے خدا کے غصے کو بھڑکایا ہے پس افسوس اس آدمی پرجس نے شک کیا۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 54

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 54

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/54/mode/1up


    و فسخ العھد و فک و لوث بطائفٍ من الجن

    و عہد را بشکست و آلودہ کرد دل را بوسوسہ شیطان

    اور عہد کو توڑا اور دل کو شیطان کے وسوسہ سے آلودہ کیا

    الجنان ۔وانی جئت من الحضرۃ الرفیعۃ العالےۃ ۔

    و من از درگاہ بلند و برتر آمدہ ام

    اور میں بڑی اونچی درگاہ سے آیا ہوں

    لیری بی ربی من بعض صفاتہ الجلالےۃ ۔ والجمالےۃ ۔

    تا پروردگار من بعض صفات جلالیہ خودرا بواسطہ من بنماید و نیزصفات جمالیہ را بنماید

    تا میرا خدا میرے ذریعہ بعض اپنی جلالی اور جمالی صفتیں دکھلاوے

    اعنی دفع الضیر وافاضۃ الخیر فان الزمان کان

    یعنی دفع کردن گزند و رسانیدن خیر چراکہ زمانہ حاجت می داشت

    یعنی شرکا دور کرنا اور بھلائی کا پہنچانا کیونکہ زمانہ کو اس بات کی حاجت

    محتاجًا الٰی دافع شرٍ طغٰی۔والٰی رافع خیرٍانحط

    کہ آں بدی را دفع کردہ شود کہ از حد درگذشتہ است وآں نیکی را بلند کردہ آید کہ فرورفتہ

    تھی کہ اس بدی کو دور کیا جائے جو حد سے بڑھ گئی تھی اور اس نیکی کو بلند کیا جائے جو

    واختفٰی ۔ فاقتضت العنایۃ الالٰھیّۃ ان یعطی

    است وپنہاں گردیدہ۔ پس عنایت الٰہیہ تقاضا فرمود کہ زمانہ را

    جاتی رہی تھی۔ اس لئے خدا کی عنایت نے چاہا کہ زمانہ کو

    الزمان ماسأل بلسان الحال ۔ ویرحم طبقات

    آں چیز دادہ شود کہ بزبان حال مے خواہد و بر مردان

    وہ چیز دی جاوے جسے وہ اپنی زبان حال سے مانگتا ہے اور مردوں اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 55

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 55

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/55/mode/1up


    النساء والرجال ۔فجعلنی مظھر المسیح عیسی

    و زنان رحم کردہ آید پس مرا جائے ظہور مسیح عیسےٰ

    عورتوں پر رحم کیا جائے پس مجھ کو مسیح عیسٰے

    ابن مریم لدفع الضرّ وابادۃ مواد الغوایۃ ۔

    ابن مریم کرد تاکہ مادہ ہائے ضرر وگمراہی را دور فرماید

    بن مریم کا مظہر بنایا تاکہ ضرر اور گمراہی کے مادوں کو دور فرماوے

    وجعلنی مظھر النبی المھدی احمد اکرم

    و مرا مظہر مہدی احمد اکرم فرمود

    اور مجھ کو مہدی احمد اکرم کا مظہر بنایا

    لافاضۃ الخیر واعادۃ عھاد الدرایۃ والھدایۃ ۔

    کہ تا بمردم خیررا برساند و باران درایت و ہدایت را دوبارہ فرستد

    تاکہ لوگوں کو فائدہ پہنچاوے اور درایت اور ہدایت کی بارش کو دوبارہ اتارے

    وتطھیر الناس من دَرَنِ الغفلۃ والجنایۃ ۔

    و مردم را از چرک غفلت وگناہگاری پاک کند

    اور لوگوں کو غفلت اور گناہگاری کے میل سے پاک کرے

    فَجِءْتُ فی الحلتین المھزودتین المصبّغتین

    پس من در دو حلہ زرد رنگ آمدہ ام کہ رنگین ہستند

    پس میں زرد رنگ والے دو لباسوں میں آیا ہوں

    بصبغ الجلال وصبغ الجمال ۔ واعطیت صفۃ

    برنگ جلال و رنگ جمال ۔ و دادہ شدم صفت

    جو جلال اور جمال کے رنگ سے رنگے ہوئے ہیں اور مجھ کو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 56

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 56

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/56/mode/1up


    الافناء والاحیاء من الرب الفعال ۔ فاما الجلال

    فانی کردن و زندہ کردن از پروردگارے کہ بر ہرکار قادر است ۔ مگر جلالے کہ دادہ شدم

    فانی کرنے اور زندہ کرنے کی صفت دی گئی ہے اور یہ صفت خدا کی طرف سے مجھ کو ملی ہے لیکن وہ جلال

    الذی اعطیت فھو اثرٌ لبروزی العیسوی من

    پس آں اثر آں بروز من است کہ عیسوی است از

    جو مجھ کو دیا گیا ہے وہ میرے اس بروز کا اثر ہے جو عیسوی بروز ہے اور جو خدا کی

    اللّٰہ ذی الجلال* ۔ لابید بہٖ شر الشرک الموّاج

    خدائے کہ ذوالجلال است تامن آں بدی شرک رانیست کنم کہ موج زن

    طرف سے ہے تاکہ میں اس شرک کی بدی کو نابود کروں جو

    الموجود فی عقائد اھل الضلال ۔المشتعل بکمال

    و موجود در عقائد گمراہان است و بکمال اشتعال

    گمراہوں کے عقیدوں میں موج مار رہی ہے اور موجود ہے اور اپنی پوری بھڑک میں

    الاشتعال ۔ الذی ھواکبر من کل شرٍّ فی

    مشتعل است آنکہ درچشم خدائے دانندہ احوال از ہرشر

    بھڑک رہی ہے اور جو حالات کے جاننے والے خدا کی نظر میں ہر ایک بدی سے

    قد قلت غیر مرۃ انی مااتیت بالسیف ولاالسنان۔ وانما اتیت بالاٰیات

    بارہا گفتہ ام کہ من بہ تیغ و نیزہ نیا مدہ ام وجز ایں نیست کہ آمدن من بہ نشانہاست

    میں نے کئی دفعہ بتلایا ہے کہ میں تلواروں اور نیزوں کے ساتھ نہیں آیا ہوں بلکہ میرے پاس نشان ہیں اور

    والقوۃ القدسیۃ وحسن البیان۔ فجلالی من السماء لا بالجنود والاعوان۔ منہ

    و قوت قدسیہ وحسن بیان۔ پس جلال من از آسمان است نہ بہ لشکرہا و مددگاراں۔ منہ

    قوت قدسیہ اور حسن بیان ہے۔ پس میرا جلال آسمانی ہے نہ کہ لشکروں کے ساتھ۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 57

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 57

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/57/mode/1up


    عین اللّٰہ عالم الاحوال ۔ ولاھدم بہٖؔ عمود

    بزرگتر است و تاکہ من بدو ستون

    بڑھ کر ہے اور تاکہ میں اس کے ذریعہ سے اس

    الافتراء علی اللّٰہ والافتعال ۔ واما الجمال الذی

    آں افترا را منہدم کنم کہ بر خدا می بندند ۔ مگر جمالے کہ دادہ شدم

    افترا کے ستون کو گرا دوں جو خدا پر باندھتے ہیں۔ لیکن وہ جمال جو مجھ کو

    اعطیت فھو اثرٌ لبروزی الاَحْمَدی من اللّٰہ

    پس آں اثر آں بروز من است کہ از خدائے صاحب لطف

    ملا ہے وہ میرے اس بروز کا اثر ہے جس کا نام بخشش کرنے والے خدا کی

    ذی اللطف والنوال ۔ لاعید بہٖ صلاح التوحید

    و بخشش بروز احمدی نام می دارد تاکہ من بداں نیکی توحید را

    طرف سے بروز احمدی ہے تاکہ میں اس کے ذریعہ سے توحید کی نیکی کو

    المفقود من الالسن والقلوب والاقوال والافعال۔

    کہ از زبان ہا و دل ہا و گفتار ہا و کردار ہا گم شدہ بود واپس

    جو زبانوں اور دلوں اور باتوں اور کاموں سے جاتی رہی ہے واپس لاؤں

    واقیم بہٖ امر التدیّن والانتحال ۔ وامرت ان

    بیارم و امر دینداری را قائم کنم ومن حکم کردہ شدم کہ

    اور اس کے ذریعہ سے دینداری کے امر کو قائم کروں اور مجھ کو حکم دیا گیا ہے کہ

    اقتل* خنازیر الافساد والالحاد والاضلال۔

    خنزیر ہائے فساد و الحاد و گمراہ کردن را بکشم۔

    میں فساد اور الحاد اور گمراہ کرنے کے ان سؤروں کو ماروں

    * اللفظ لفظ الحدیث کما جاء فی البخاری والمراد من القتل اتمام الحجۃ وابطال الباطل بالدلائل القاطعۃ والاٰیات السماویۃ لا القتل حقیقۃ۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 58

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 58

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/58/mode/1up


    الذین یدوسون دررالحق تحت النعال ۔ و

    آناں کہ گوہر ہائے راستی را زیر کفش ہائے خود پامال می کنند و

    جو سچائی کے موتیوں کو پیروں کے نیچے ملتے ہیں اور

    یھلکون حرث الناس ویخربون زروع الایمان

    تباہ می کنند زراعت مردم را وخراب می کنند کشت ہائے ایمان

    لوگوں کی کھیتیوں کو اجاڑتے ہیں اور ایمان اور پرہیزگاری اور

    والتورع والاعمال ۔ وقتلی ھٰذا بحربۃٍ سماویۃٍ

    و پرہیزگاری و اعمال را و ایں کشتن بحربۂ آسمان است

    عملوں کی کھیتیوں کو خراب کرتے ہیں۔ اور یہ مارنا آسمانی ہتھیار کے ساتھ ہے۔

    لابالسیوف والنبال ۔ کما ھوزعم المحرومین

    نہ بہ شمشیرہا و تیرہا چناں کہ آں زعم کسانے ہست کہ

    تلواروں اور تیروں کے ساتھ نہیں جیسا کہ یہ گمان ان لوگوں کا ہے

    من الحق وصدق المقال ۔ فانھم ضَلّوا و

    از حق و راست گفتاری محروم ہستند چراکہ اوشاں گمراہ شدہ اند و

    جو حق اور راست گفتاری سے محروم ہیں کیونکہ وہ خود گمراہ ہوئے اور

    اَضَلُّوا کثیرًا من الجُھّال ۔ وان الحرب حرّمت

    اکثر مردم را از جاہلاں گمراہ کردہ اند و بہ تحقیق جنگ بامردم کفار

    جاہلوں میں سے بہتوں کو گمراہ کیا ہے اور یہ سچ بات ہے کہ کافروں کے ساتھ لڑنا

    علیّ وسبق لی ان اضع الحرب ولا اتوجہ

    برمن حرام کردہ اند و پیش از وجود من برائے من مقرر شدہ است کہ جنگ را ترک کنم و سوئے

    مجھ پر حرام کیا گیا ہے اور میرے وجود سے پہلے میرے لئے مقرر ہوا ہے کہ لڑائی کو ترک کروں اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 59

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 59

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/59/mode/1up


    الی القتال ۔ فلا جھاد الّاجھاد اللسان والاٰیات

    کشت و خون متوجہ نشوم ۔ پس ہیچ جہاد بجز جہاد زباں و نشان

    خونریزی کی طرف متوجہ نہ ہوں۔ پس کوئی جہاد سوائے زبانی جہاد کے اور نشان اور دلائل کے

    والاستدلال ۔ وکذالک امرت ان املأ بیوت

    و دلائل باقی نماندہ و ہم چنیں مامورم کہ خانہ ہائے مومناں را

    جہاد کے باقی نہیں رہا اور ایسا ہی مجھ کو یہ بھی حکم ہے کہ مسلمانوں کے گھروں کو

    المؤمنین وجربھم من المال ۔ ولٰکن لا

    وکیسہ ہائے اوشاں را بمال پُر کنم مگر نہ

    اور ان کے توشہ دانوں کو مال سے بھر دوں لیکن چاندی سونے

    باللجین والدجّال ۔ بل بمال العلم والرشد

    بہ سیم و زر بلکہ بمال علم و رشد

    کے مال سے نہیں بلکہ علم اور رشد اور

    والھدایۃ والیقین علٰی وجہ الکمال ۔ وجعل

    و ہدایت و یقین بروجہ کمال و گردانیدن

    ہدایت اور یقین کے مال سے اور نیز اس مال سے کہ

    الایمان اثبت من الجبال ۔ وتبشیر المثقلین

    ایمان مضبوط تر از کوہ ہا ۔ وبشارت دادن آں زیر باراں را کہ

    ایمان کو پہاڑوں سے بھی زیادہ مضبوط کیا جائے اور جو لوگ بوجھوں کے نیچے دبے ہوئے ہیں

    تحت الاثقال ۔ فبشرٰی لکم قد جاء۔کم المسیح ۔

    بارگراں برایشاں افتادہ است پس شما را بشارت باد کہ نزد شما مسیح آمد

    ان کو بشارت دی جائے۔ پس تم کو خوشخبری ہو کہ تمہارے پاس مسیح آیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 60

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 60

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/60/mode/1up


    ومسحہ القادر واعطی لہ الکلام الفصیح ۔

    و قادر اورا مسح کرد وکلام فصیح او را عطا کردہ شد

    اور قادر نے اس کو مسح کیا اور فصیح کلام اس کو عطا کیا گیا۔

    وانّہٗ یعصمکم من فرقۃٍ ھی للاضلال تسیحُ ۔

    واو شما را نگہ میدارد ازاں فرقہ کہ برائے گمراہ کردن بر زمین مے رود

    اور وہ تم کو اس فرقہ سے بچاتا ہے جو گمراہ کرنے کے لئے زمین پر سیر کرتا ہے۔

    والی اللّٰہ یدعو ویصیح ۔ وکل شبھۃٍ یُزیل

    و سوئے خدا دعوت می کند و می خواند و ہرشبہ را دور میکند

    اور خدا کی طرف بلاتا ہے اور ہر ایک شبہ کو دور فرماتا ہے

    و یُزیح ۔وطوبٰی لکم قدجاء کم المھدی المعھود ۔

    وزائل می فرماید و شمارا مبارک باد کہ مہدی معہود نزد شما رسیدہ است

    اور تم کو مبارک ہو کیونکہ مہدئ معہود تمہارے پاس آپہنچا

    ومعہ المال الکثیر والمتاع المنضود ۔ وانہٗ

    و با وے مال کثیر و متاعے است کہ تہ بہ تہ نہادہ است و او

    اور اس کے پاس بہت سا مال و متاع ہے جو تہ بہ تہ رکھا ہے اور وہ

    یسعٰی لیُردّ الیکم الغنی المفقود ۔ ویستخرج

    سعی می کند کہ آں تو نگری کہ از شما گم شدہ است باز سوئے شما مسترد شود

    کوشش کرتا ہے کہ وہ مال جو تمہارے پاس سے جاتا رہا ہے پھر تمہاری طرف لوٹ آئے اور وہ

    الاقبال الموء ود ۔ ماکان حدیث یُّفترٰی ۔ بل

    وآں اقبال کہ زندہ بگور است باز از گوربیروں آید۔ ایں آں سخنے نیست کہ افترا کردہ شود بلکہ

    اقبال جو جیتے جی قبر میں ہے پھر قبر سے نکلے۔ یہ وہ بات نہیں کہ جھوٹ بنالی جائے بلکہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 61

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 61

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/61/mode/1up


    نورٌ من اللّٰہ مع اٰیاتٍ کبرٰی ۔ ایھا الناس انی انا

    نور خدا ست کہ نشان ہائے بزرگ ہمراہ می دارد ۔ اے مردم من آں مسیح ہستم کہ

    خدا کا نور ہے جو اپنے ساتھ بڑے بڑے نشان رکھتاہے۔ اے لوگو! میں وہ مسیح ہوں کہ

    المسیح المحمّدی ۔وانّی انا احمدنالمھدی ۔

    از سلسلۂ محمدی است و من احمد مہدی ہستم

    جو محمدی سلسلہ میں سے ہے اور میں احمد مہدی ہوں

    وان ربّی معی الٰی یوم لَحدی من یوم مھدی ۔

    و بہ تحقیق رب من بامن است از وقت مہد من تا وقت لحد من

    اور سچ مچ میرا رب میرے ساتھ ہے میرے بچپن سے لے کر میری لحد تک

    وانی اعطیت ضرامًا اَکَّالًا ۔ وماءً ا زلالًا ۔

    و من دادہ شدہ ام آتشے خورندہ و آبے شیرین و

    اور مجھ کو وہ آگ ملی ہے جو کھا جانے والی ہے اور وہ پانی جو میٹھا ہے اور

    وانا کوکبٌ یمانیٌ ۔ ووابلٌ روحانیٌّ ۔ ایذائی

    من ستارہ یمانی ہستم و بارش روحانی ہستم۔ رنج دادن من

    میں یمانی ستارہ ہوں اور روحانی بارش ہوں میرا رنج دینا

    سنانٌ مذرّبٌ ۔ ودعائی دواءٌ مجرّبٌ ۔ اُرِی

    نیزہ تیز است و دعائے من دوائے مجرب است قومے

    تیز نیزہ ہے اور میری دعا مجرب دوا ہے ایک قوم کو

    قومًا جلالًا ۔ وقومًا اٰخرین جمالًا ۔ وبیدی

    را جلال مے نمایم وقومے دیگر را جمال می نمایم ۔ و در دست من

    میں اپنا جلال دکھاتا ہوں اور دوسری قوم کو جمال دکھاتا ہوں اور میرے ہاتھ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 62

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 62

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/62/mode/1up


    حربۃٌ ابیدبھا عادات الظلم والذنوب ۔ وفی

    حربہ است ہلاک می کنم بآں عادتہائے ظلم و گناہ را و در

    ہتھیار ہے اس کے ساتھ میں ظلم اور گناہ کی عادتوں کو ہلاک کرتا ہوں اور

    الاخرٰی شربۃٌ اعیدبھا حیاۃ القلوب ۔ فاسٌ

    دست دیگر شربت است کہ بداں زندگی دلہا دوبارہ می بخشم تبرے

    دوسرے ہاتھ میں شربت ہے جس سے میں دلوں کو دوبارہ زندہ کرتا ہوں۔ ایک کلہاڑی

    للافناء ۔ وانفاسٌ للاحیاء ۔ اَمّا جلالی فبما قُصِد

    برائے فنا کردن است و دمہا برائے زندہ کردن مگر جلال من ازیں سبب است کہ

    فنا کرنے کے لئے ہے اور دم زندہ کرنے کے لئے۔ میرا جلال اس وجہ سے ہے کہ

    کابن مریم استیصالی ۔ واما جمالی فبما فارت

    ہمچو ابن مریم قصد بیخ کنی من کردہ اند وجمال من ازیں است کہ

    لوگوں نے حضرت عیسیٰ کی طرح میری بیخ کنی کا قصد کیا ہے اور جمال اس وجہ سے کہ

    رحمتی کسیدی احمد لاھدی قومًا غفلوا

    رحمت من ہمچو سید من احمد در جوش است تاقومے را راہ نمایم کہ از

    میری رحمت میرے سردار احمد کی طرح جوش میں ہے تا میں اس قوم کو راہ دکھلاؤں جو

    عن الربّ المتعالی ۔ اَفَاَنتم تعجبون ۔

    خدائے بزرگ تر خود غافل اند چہ شما ازیں امر تعجب مے کنید

    اپنے بزرگ رب سے غافل ہیں کیا تم اس بات سے تعجب کرتے ہو

    و الی الزمان وضرورتہٖ لا تلتفتون ۔ ا لا ترون

    و سوئے زمانہ وضرورت آں التفات نمے کنید آیا نمے بینید کہ

    اور زمانہ اور اس کی ضرورت کی طرف توجہ نہیں کرتے کیا تم نہیں دیکھتے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 63

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 63

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/63/mode/1up


    الٰی زمان احتاج الی الرب الفعّال ۔ لیُری لقومٍ

    زمانہ سوئے خدائے قادر حاجتے دارد تا کہ قومے را

    زمانہ خدا کی طرف ایک حاجت رکھتا ہے تاکہ ایک قوم کو اپنے

    صفۃ جلالہٖ وللاٰخرین صفۃ الجمال ۔ وقد

    صفت جلال خود بنماید و قومے دیگر را برصفت جمال خود مطلع فرماید ۔ و بہ تحقیق

    جلال کی صفت دکھاوے اور دوسری قوم کو اپنے جمال کی صفت سے مطلع فرماوے اور تحقیق

    ظھرت الاٰیات ۔ و تبیّنت العلامات ۔ وانقطعت

    نشانہا ظاہر شدہ اند و علامت ہا منکشف گشتہ و ہمہ

    نشان ظاہر ہوگئے اور علامتیں کھل گئیں اور تمام

    الخصومات ۔ فمالکم لا تنظرون ۔ وانکسفت

    خصومتہا منقطع شدند۔ پس چرانہ مے بینید ۔ و در رمضان

    جھگڑے جاتے رہے پس کیوں نہیں دیکھتے۔ اور رمضان کے مہینے میں

    الشمس والقمر فی رمضان فلا تعرفون ۔ و

    مہر و ماہ را کسوف گرفت پس نمے شناسید و

    سورج اور چاند کو گرہن لگا پس تم نہیں پہنچانتے اور

    مات بعض الناس بنباأ من اللّٰہ وقتل البعضط

    بعض مردم بہ پیشگوئی کہ از خدا تعالیٰ بود فوت شدند وبعض مردم بہ پیشگوئی قتل کشتہ شدند

    بعض آدمی پیشگوئی کے رو سے فوت ہوئے اور بعض آدمی قتل کی پیشگوئی کے رو سے مارے گئے

    فلا تُفکّرون ۔ ونزلت لی آيٌ کثیرۃٌ فلاؔ

    پس فکر نمی کنید و در تائید من بسیار نشانہا ظاہر شدند پس ہیچ

    پس تم نہیں سوچتے ۔ اور میری تائید میں بہت سے نشان ظاہر ہوئے لیکن



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 64

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 64

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/64/mode/1up


    تبالون ۔ وشھدت لی الارض والسماء والماء

    پروا نمے دارید۔ و برائے من زمین و آسمان و آب

    تمہیں کچھ پرواہ نہیں۔ اور میرے لئے زمین اور آسمان اور پانی

    والعفاء فلا تخافون ۔ وتظاھر لی العقل والنقل

    وخاک گواہی دادند پس ہیچ نمے ترسید و عقل و نقل و علامت ہا

    اور مٹی نے گواہی دی لیکن تم بالکل نہیں ڈرتے اور عقل اور نقل اور علامتیں

    والعلاماتُ والاٰیات ۔ وتظاھرت الشھادات و

    و نشان ہا گواہ یکدیگر شدند و دیگر گواہی ہا و

    اور نشان ایک دوسرے کے گواہ ہوئے اور دوسری گواہیوں اور

    الرؤیا والمکاشفات ۔ ثم انتم تنکرون ۔ وان

    خواب ہا و مکاشفات یکدیگر را قوت دادند بازشما انکار می کنید و ایں

    خوابوں اور مکاشفات نے آپس میں ایک دوسرے کو قوت دی پھر تم انکار کرتے ہو اور

    لھا شانًا عظیمًا لقومٍ یتدبّرون ۔ وطلع

    نشانہا را شانے عظیم است برائے آنانکہ تدبر مے کنند وستارہ ذوالسنین

    ان لوگوں کی نظر میں جو تدبر کرتے ہیں ان نشانوں کی بڑی شان ہے اور ذوالسنین

    ذوالسنین ۔ ومضٰی من ھٰذہ الماءۃ خمسھا

    طلوع کرد واز صدی حصہ پنجم آں گذشت

    ستارہ نے طلوع کیا اور صدی میں سے پانچواں حصہ گذر گیا

    اِلّا قلیلٌ من سنین ۔ فاین المجدد ان کنتم

    مگر چند سال پس مجدد کجاست! اگر

    مگر چند برس پس اگر جانتے ہو تو بتاؤ کہ مجدد



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 65

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 65

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/65/mode/1up


    تعلمون ۔ ونزل من السماء الطاعون ۔ ومُنِع

    مے دانید و طاعون ظاہر شد وحج

    کہاں ہے۔ اور طاعون پھوٹا اور حج

    الحجّ وکثر المنون ۔ واختصم الفرق علٰی معدنٍ

    منع کردہ شد وموت بسیار شد و برمعدن زر فرقہ ہا خصومت

    روکا گیا اور موتیں زیادہ ہوئیں اور سونے کی کان پر قوموں نے

    من ذھبٍ وھم یُقاتِلُون ۔ وعلا الصلیب ۔

    کردند و باہم جنگ ہا نمودند وصلیب بلند شد

    آپس میں لڑائی جھگڑے کئے اور صلیب بلند ہوئی

    واضحی الاسلام یسیب ویغیب ۔کانہ الغریب ۔

    و اسلام از جائے خود حرکت کرد و ناپدید شد گویا کہ غریب است

    اور اسلام نے اپنی جگہ سے حرکت کی اور غائب ہوگیا گویا کہ مسافر ہے۔

    وکثر الفسق والفاسقون ۔ وحُبّب الی النفوس

    و فسق و فاسقاں بسیار شدند و مردم سوئے شراب

    اور فسق اور فاسق بہت ہوگئے اور لوگوں نے شراب اور

    الخمر ۔ والقمر والزمر ۔ وتراءَ ی الزانون

    و قمار بازی و سرود گفتن میل کردند و ظاہر شدند بدکاراں

    جوئے اور ناچ رنگ کی طرف رجوع کیا اور بدکار اور

    المجالحون وقَلّ المتقون ۔ وتجلّٰی وقت ربّنا

    وبریکدیگر سختی کنندگان وپرہیزگاران کم شدند و وقت تجلی خدائے ما ظاہر گشت

    ایک دوسرے پر سختی کرنے والے ظاہر ہوئے اور پرہیزگار کم ہوگئے اور ہمارے خدا کی تجلی کا وقت ظاہر ہوگیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 66

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 66

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/66/mode/1up



    وتمّ ما قال النبیون ۔فبایّ حدیث بعدہ تؤمنون ۔

    وہمہ آنچہ انبیاء گفتہ بودند بظہور رسید پس بعد ازیں بکدام حدیث ایمان خواہید آورد

    اور وہ سب جو کچھ نبیوں نے کہا تھا ظہور میں آیا پس اس کے سوا کس بات کو مانو گے۔

    ایھا الناس قوموا للّٰہ زرافاتٍ وفرادٰی فرادٰی ۔

    اے مردماں برائے خدا شماہمہ یا یک یک برخیزید

    اے لوگو! خدا کے لئے تم سب کے سب یا اکیلے اکیلے خدا کا خوف کر کے

    ثم اتقوا اللّٰہ وفکروا کالذی مابخل وماعادٰی ۔

    باز از خدا بترسید وہمچو شخصے فکر کنید کہ نہ بخل مے کند و نہ دشمنی۔

    اس آدمی کی طرح سوچو جو نہ بخل کرتا ہے اور نہ دشمنی۔

    الیس ھٰذا الوقت وقت رحم اللّٰہ علی العباد ۔

    آیا ایں وقت وقت رحم خدا بربندگان نیست؟

    کیا یہ وہ زمانہ نہیں کہ خدا بندوں پر رحم کرے ؟

    ووقت دفع الشر وتدارک عطش الاکباد

    وآیا وقت چناں نیست کہ بدی را دفع کردہ آید وتشنگی جگر ہا را بفرود آوردن باران تدارک

    اور کیا یہ وہ زمانہ نہیں کہ بدی کو دفع کیا جائے اور جگروں کی پیاس کا مینہ برسانے سے

    بالعھاد ۔ الیس سیل الشر قدبلغ انتھاء ہٗ ۔

    کردہ آید؟ آیا سیلاب شر تا انتہائے خود نہ رسیدہ است؟

    تدارک کیا جائے؟ کیا بدی کا سیلاب اپنی انتہا کو نہیں پہنچا؟

    وذیل الجھل طوّل ارجاء ہٗ ۔ وفسد الملک

    و دامن جہل کنارہ ہائے خود را دراز نہ کردہ؟ وملک فاسد شد

    اور جہالت کے دامن نے اپنے کناروں کو نہیں پھیلایا؟ اور ملک فاسد ہوگیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 67

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 67

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/67/mode/1up



    کلہٗ وشکر ابلیس جھلاء ہٗ ۔ فاشکروا اللّٰہ الذی

    و ابلیس جاہلاں را شکر گفت پس شکر آں خدا کنید کہ

    اور شیطان نے جاہلوں کا شکریہ ادا کیا پس اس خدا کا شکر کرو جس نے

    تذکرکم وتذکر دینکم وما اضاعہٗ ۔ وعصم

    شما را یاد کرد و دین شما را یاد کرد واز ضائع شدن محفوظ داشت و

    تم کو یاد کیا اور تمہارے دین کو یاد کیا اور ضائع ہونے سے محفوظ رکھا اور تمہارے

    حرثکم وزرعکم ولعاعہٗ ۔ وانزل المطر

    کاشتہ شمارا وزراعت شماراو سبزہ نرم زراعت را از آفتہا نگہ داشت و باران فرود آورد

    بوئے ہوئے کو اور تمہاری زراعت کو آفتوں سے بچایا اور مینہ نازل فرمایا

    واکمل ابضاعہٗ ۔ وبعث مسیحہٗ لدفع

    وسرمایہ آں کامل کرد و مسیح خود را برائے دفع گزند

    اور اس کے سرمایہ کو کامل کیا اور اپنے مسیح کو ضرر کے دور کرنے کے لئے

    الضیر ۔ ومھدیہٗ لافاضۃ الخیر۔ وادخلکم

    ومہدئ خود را برائے رسانیدن خیر ونفع مبعوث فرمود وشما را

    اور اپنے مہدی کو خیر اور نفع پہنچانے کے لئے بھیجا اور تمہیں

    فی زمان امامکم بعد زمان الغیر۔ ایھا الاخوان

    در زمانہ امام شما بعد زمانہ غیر داخل کرد

    تمہارے امام کے زمانہ میں غیر کے زمانہ کے بعد داخل کیا اے بھائیو!

    انّ زماننا ھٰذا یُضاھی شھرنا ھٰذا بالتناسب

    ایں زمانۂ ما مشابہت مے دارد ایں ماہ مارا بمناسبت تام

    یہ ہمارا زمانہ ہمارے اس مہینے سے مناسبت تام رکھتا ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 68

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 68

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/68/mode/1up


    التام ۔ فانہٗ اٰخر الازمنۃ وان ھٰذا الشھر

    چراکہ ایں زمانہ ما زمانہ آخری است ہم چنیں ایں ماہ ما

    کیونکہ یہ آخری زمانہ ہے اور یہ مہینہ بھی

    اٰخرالاشھر من شھور الاسلام ۔ وکلا ھما

    ازماہ ہائے اسلام آخری واقع شدہ و ہردو

    اسلام کے مہینوں میں سے آخری ہے اور دونوں

    قریبٌ من الاختتام ۔ فی ھٰذا ضحایا وفی ذٰلک

    قریب الاختتام اند دریں قربانی ہا ہستند و دراں نیز

    ختم ہونے کے قریب ہیں اس آخری مہینہ میں بھی قربانیاں ہیں اور اس

    ضحایا ۔ والفرق فرق الاصل وعکس المرایا ۔

    قربانیہا ہستند و فرق صرف فرق اصل و عکس است

    آخری زمانہ میں بھی قربانیاں ہیں۔ اور فرق صرف اصل اور عکس کا ہے جو آئینہ میں پڑتا ہے

    وقد سبق نموذجھا فی زمن خیر البرایا ۔

    و نمونہ آں در زمانہ بہترین مخلوقات بگذشت

    اور اس کا نمونہ زمانۂ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم میں گذر چکا ہے۔

    والاصل ضحیّۃ الروح یا اولی الابصار ۔ وان ضحایا

    و اصل امر اے دانشمنداں قربانی روح است و قربانی ہائے

    اور اصل روح کی قربانی ہے اے دانشمندو! اور بکروں کی قربانیاں

    الجدایا کالاظلال والاٰثار ۔ فافھموا سرّ ھٰذہ

    گوسپنداں ہمچو اظلال و آثار واقع شدہ است پس ایں حقیقت را بفہمید

    روح کی قربانی کے لئے مثل سایوں اور آثار کے ہیں پس اس حقیقت کو سمجھ لو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 69

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 69

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/69/mode/1up


    الحقیقۃ ۔ وانتم احق بھا واھلھا بعدا لصحابۃ ۔

    و شما حق مے دارید واہل ایں امر ہستید کہ بعد صحابہ رضی اللہ عنہم

    اور تم صحابہ رضی اللہ تعالیٰ عنہم کے بعد یہ حق رکھتے ہو اور اس بات کے اہل ہو کہ

    وانکم الاٰخرون منھم اُلحقتم بِھِمْ بفضل من

    ایں حقیقت را بفہمید۔ وشما از جملہ صحابہ گروہ آخری ہستید کہ بفضل خدا و رحمت او درایشاں

    اس حقیقت کو سمجھو اور تم ان میں سے ایک آخری گروہ ہو جو خدا کے فضل اور رحمت سے اس کے ساتھ

    اللّٰہ والرحمۃ ۔ وان سلسلۃ الازمنۃ خُتِمَتْ

    داخل کردہ شدہ اید و سلسلہ زمانہ ہا از جناب احدیت بر زمانہ ما

    شامل کئے گئے ہو۔ اور زمانوں کا سلسلہ جناب الٰہی سے ہمارے زمانہ پر

    علٰی زماننا من حضرۃ الاحدیۃ ۔ کماخُتِمَتْ

    ختم شدہ است ہمچنانکہ سلسلہ ماہ ہا

    ختم ہوگیا ہے جیسا کہ اسلام کے مہینے

    شھور الاسلام علٰی شھر الضحیۃ ۔ وفی ھٰذا اشارۃٌ

    بر ماہ قربانی ختم شدہ است و دریں اشارتے پوشیدہ است

    قربانی کے مہینہ پر ختم ہوگئے ہیں اور اس میں اہل رائے کے لئے

    مخفیۃٌ لأھل الرأی والرویّۃ ۔ وانی علٰی مقام

    برائے اہل الرائے و من بر مقام

    ایک پوشیدہ اشارہ ہے اور میں ولایت کے

    الختم من الولایۃ ۔ کما کان سیّدی المصطفٰی

    ختم ولایت ہستم یعنی برمن ولایت ختم گردیدہ ہمچنانکہ برسیدی حضرت مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم

    سلسلہ کو ختم کرنے والا ہوں جیسا کہ ہمارے سید آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 70

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 70

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/70/mode/1up


    علٰی مقام الختم من النبوۃ ۔ وانہٗ خاتم الانبیاء ۔

    نبوت ختم گردیدہ و او خاتم الانبیاء است

    نبوت کے سلسلہ کو ختم کرنے والے تھے اور وہ خاتم الانبیاء ہیں۔

    وانا خاتم الاولیاء ۔ لاولیّ بعدی ۔ الّا الذی ھو

    ومن خاتم الاولیا ہیچ ولی بعد من نیست مگر آنکہ

    اور میں خاتم الاولیاء ہوں میرے بعد کوئی ولی نہیں مگر وہ جو

    منّی وعلٰی عھدی ۔ وانی اُرْسِلْتُ من ربّی بکل

    از من باشد و برعہد من باشد۔ ومن از خدائے خود بتمام تر

    مجھ سے ہوگا اور میرے عہد پر ہوگا اور میں اپنے خدا کی طرف سے تمام تر

    قُوّۃٍ وبرکۃٍ وعزۃٍ ۔ وان قدمی ھٰذہٖ علٰی

    قوت وبرکت و عزت فرستادہ شدہ ام و ایں قدم من براں

    قوت اور برکت اور عزت کے ساتھ بھیجا گیا ہوں اور یہ میرا قدم ایک ایسے

    منارۃٍ ختم علیھا کل رفعۃٍ ۔ فاتقوا اللّٰہ ایّھا

    منار است کہ برو بلندی ختم گردیدہ پس اے جواناں

    منارہ پر ہے جو اس پر ہر ایک بلندی ختم کی گئی ہے پس خدا سے ڈرو

    الفتیان ۔ واعرفونی واطیعونی ولا تموتوا

    بتر سید و مرا بشناسید و اطاعت من کنید و ہمچو نافرماناں

    اے جوانمردو اور مجھے پہچانو اور نافرمانی مت کرو اور نافرمانی پر

    بالعصیان ۔ وقد قرب الزمان ۔ وحان ان

    نہ میرید و بہ تحقیق زمانہ نزدیک رسید وآں وقت

    مت مرو اور زمانہ نزدیک آگیا ہے اور وہ وقت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 71

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 71

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/71/mode/1up


    تسئل کل نفسٍ وتدان ۔ البلایا کثیرۃٌ ولا ینجیکم

    قریب آمد کہ ہر نفس از اعمال خود پرسیدہ شود و جزا دادہ آید۔ بلاہا بسیا ر اند وہیچ کس

    نزدیک ہے کہ ہر ایک جان اپنے کاموں سے پوچھی جائے اور بدلہ دی جائے۔ بلائیں بہت ہیں اور تمہیں

    الّا الایمان ۔ والخطایا کبیرۃٌ ولا تذوبھا الّا

    بجز ایمان نجات نخواہد یافت۔ وخطاہا بزرگ اند و آنہا را نخواہد گداخت مگر

    صرف ایمان نجات دے گا اور خطائیں بڑی ہیں اور ان کو گداز نہیں کرے گا مگر

    الذوبان ۔ اتقوا عذاب اللّٰہ ایھا الاعوان ۔ ولمن

    گداختن۔ اے انصار من از عذاب خدا بترسید و ہرکہ

    گداز ہو جانا خدا کے عذاب سے اے میرے انصار ڈرو اور جو

    خاف مقام ربّہٖ جنّتان ۔ فلا تقعدوا مع الغافلین

    بترسد برائے او دو بہشت اند پس ہمچو غافلاں منشینید

    خدا سے ڈرے ان کے لئے دو بہشت ہیں پس غافلوں کے ساتھ مت بیٹھو

    والذین نسوا المنایا ۔ وسارعوا الی اللّٰہ وارکبوا

    وہمچو آناں نباشید کہ موتہائے خود را فراموش کردہ اند وسوئے خدا بسرعت تمام حرکت کنید و بر

    ان لوگوں کے ساتھ جنہوں نے اپنی موتوں کو بھلا رکھا ہے۔ خدا کی طرف دوڑو اور تیز رفتار گھوڑوں پر

    علٰی اعدی المطایا ۔ واترکوا ذوات الضلع و

    سواری ہائے تیز رفتار سوار شوید واسپان لنگ را بگذارید وناقہ ہائے لاغررا

    سوار ہو جاؤ ایسے گھوڑوں کو چھوڑو جو لنگڑا کے چلتے ہیں

    الرذایا ۔ تصلوا الٰی ربّ البرایا ۔ خذوا الانقطاع

    ترک کنید تاخدائے خود را بیابید۔ لازم گیرید بریدن را

    تا اپنے خدا کو ملو خدا کی طرف منقطع ہو جانا عادت پکڑو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 72

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 72

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/72/mode/1up



    الانقطاع لیُوْھَبَ لکم الوصل والاقترابُ ۔ وکسّروا

    بریدن را تابخشیدہ شود شمارا وصال الٰہی و قربت او وبشکنید

    تا خدا کا وصال اور اس کا قرب تمہیں عنایت کیا جائے اور

    الاسباب لیُخْلقَ لکم الاسبابُ ۔ وموتوا لیُردّ

    اسباب را تا پیدا کردہ شوند برائے شما اسباب وبمیرید تا واپس شود

    اسباب کو توڑ دو تاکہ تمہارے لئے اسباب پیدا کئے جائیں اور مرجاؤ تا دوبارہ

    الیکم الحیٰوۃ ایّھا الاحباب ۔ الیوم تمّت الحجۃ

    سوئے شما زندگی اے دوستان ۔ امروز بر مخالفاں

    زندگی تمہیں دی جائے آج مخالفوں پر

    علی المخالفین ۔ وانقطعت معاذیر المعتذرین ۔

    حجت تمام شد و ہمہ عذر ہائے عذر کنندگاں منقطع شدند

    حجت پوری ہوگئی اور عذر کرنے والوں کے سب عذر ٹوٹ گئے

    ویئس منکم زمر المضلین والموسوسین ۔

    و نومید شدند از شما گروہ ہائے گمراہ کنندگان و وسوسہ اندازندگان

    اور تم سے وہ سب گروہ نا امید ہوگئے جو گمراہ کرنے والے اور وسوسہ ڈالنے والے تھے

    الذین اکلوا اعمارھم فی ابتغاء الدنیا ولیس لھم

    آناں کہ بخوردند عمر ہائے خود را در طلب دنیا و ہیچ

    انہوں نے دنیا کی طلب میں اپنی عمریں کھوئیں اور دین میں سے

    حظٌّ من الدین ۔ بل ھم کالعمین ۔ فالیوم

    حظے از دین اوشاں را نیست بلکہ او شاں ہمچو نابینایان ہستند۔ امروز

    کوئی بہرہ حاصل نہ کیا بلکہ وہ اندھوں کی طرح ہیں اور آج



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 73

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 73

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/73/mode/1up


    انقض اللّٰہ ظھور ھم ورجعوا یائسین ۔

    خدا پشت ہائے اوشاں بشکست و درحالت نومیدی بازگشتند

    خدا نے ان کی کمریں توڑ دیں اور وہ ناامید ہوکر پھر گئے۔

    الیوم حصحص الحق للناظرین ۔ واستبان

    امروز برائے بینندگاں حق ظاہر شد و

    آج دیکھنے والوں کے لئے حق ظاہر ہوگیا اور مجرموں کی

    سبیل المجرمین ۔ ولم یبق معرضٌ الا الذی

    راہ مجرماں ہوید ا گشت و باقی نماند اعراض کنندہ مگر کسے کہ

    راہ کھل گئی اور حق سے کنارہ کرنے والا وہی شخص رہا جس کو

    حبسہٗ حرمانٌ ازلیٌّ ۔ ولا منکرٌ الّا الذی منعہٗ

    محرومی ازلی او را باز داشت و نہ باقی ماند منکرے مگر آنکہ

    ازلی محرومی نے روک دیا اور وہی منکر رہا جس کو پیدائشی جورپسندی

    عدوانٌ فطریٌ ۔ فنترک ھٰؤلاء بسلامٍ ۔

    عادت ظلم فطری او را منع کرد پس ایں کسانے را بسلام ترک مے کنیم نے منع کر دیا پس ہم ان لوگوں کو سلام کے ساتھ رخصت کرتے ہیں

    و قدتم الافحام ۔ وتحقّق الاثام ۔ وان لم

    و برایشاں حجت تمام شد و ثابت شد جزائے بدی ایشاں و اگر

    اور ان پرحجت پوری ہوگئی اور ان کا قابل سزا ہونا ثابت ہوگیا پس اگر اب بھی

    ینتھوا فالصبر جدیرٌ ۔ وسوف یُنبّءھم خبیرٌ ۔

    باز نیایند پس صبر بہتر است وعنقریب خدائے خبیر ایشاں را متنبہ خواہد کرد

    باز نہ آویں پس صبر لائق ہے۔ اور عنقریب وہ جو ان کے حالات پر اطلاع رکھتا ہے ان کو متنبہ کردے گا۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 74

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 74

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/74/mode/1up


    الباؔ ب الثانی

    ثم بعد ذالک اعلموا یا اولی النھٰی ۔ اَنّ

    بعد زیں بدانید اے دانشمنداں کہ

    پھر بعد اس کے تمہیں معلوم ہو اے دانشمندو! کہ

    اللّٰہ ذکرفی القراٰن انّہٗ بعث موسٰی بعدما

    خدا تعالیٰ در قرآن ذکر کردہ است کہ او موسیٰ را بعد

    خدا نے قرآن شریف میں ذکر کیا کہ اس نے پہلی امتوں کے

    اھلک القرون الاولٰی ۔ واٰتاہ اللّٰہ الکتاب والحکم

    ہلاک کردن اُمت ہائے نخستیں مبعوث فرمود و او را کتاب و حکم و نبوت

    ہلاک کر دینے کے بعد موسیٰ کو پیدا کیا۔ اور اس کو کتاب اور حکم اور

    والنبوۃ ۔ ووھب لقومہ الخلافۃ ۔ واقام فیھم

    داد ۔ و قوم او را خلافت داد و در ایشاں

    نبوت عطا کی اور اس کی قوم کو خلافت بخشی اور ان میں

    سلسلۃ الھُدٰی ۔ وجعل خاتم خلفاۂٖ رسولہٗ

    سلسلہ ہدایت قائم کرد و حضرت عیسیٰ علیہ السلام را کہ رسول اوبود

    سلسلہ ہدایت کا قائم کیا اور اس سلسلہ کا خاتم الخلفاء

    ابن مریم عیسٰی ۔ فکان عیسٰی اٰخرلبن ھٰذہ

    خاتم خلفاء حضرت موسیٰ قرار داد۔ پس عیسٰی علیہ السلام برائے ایں عمارت

    حضرت عیسیٰ کو بنایا پس حضرت عیسیٰ اس عمارت کی آخری



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 75

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 75

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/75/mode/1up


    العمارۃ وعَلمًا لساعۃ زوالھا وعبرۃً لمن یخشٰی ۔

    خشت آخر ین بود و برائے ساعت زوال یہود نشانے بود و از بہر ترسندگاں مقام عبرت بود

    اینٹ تھے اور ایک دلیل تھے اس عمارت کے زوال کی گھڑی پر اور ایک عبرت تھے اس شخص کے لئے

    ثم بعث اللّٰہ نبینا الاُمّيَ فی ارض اُمّ القُرٰی ۔

    باز خدا تعالیٰ نبی ما اُمّی محمد صلی اللہ علیہ وسلم را در زمین مکہ مبعوث فرمود

    جو ڈرتا ہو۔ پھر خدا نے ہمارے پیغمبر اُمّی صلی اللہ علیہ وسلم کو مکہ کی زمین میں مبعوث فرمایا

    وجعلہٗ مثیل موسٰی ۔ وجعل سلسلۃ خلفاء ہٖ

    و او را مثیل موسیٰ ساخت و سلسلہ خلفاء او را

    اور ان کو مثیل موسیٰ علیہ السلام بنایا اور ان کے خلیفوں کا سلسلہ

    کمثل سلسلۃ خلفاء الکلیم لتکون رِدْءً ا لھا

    ہمچو سلسلہ خلفاء حضرت موسیٰ نمود تا مددگار و مصدق سلسلہ نخستیں

    حضرت موسیٰ کے خلیفوں کے سلسلہ کی طرح اور ان کے مشابہ کر دیا تاکہ یہ سلسلہ اس سلسلہ کا مددگار

    وانّ فی ھٰذا لاٰیۃً لمن یرٰی ۔ وان شئت

    گردد و دریں برائے بینندگاں نشانے است و اگر خواہی

    ہو اور اس میں دیکھنے والوں کے لئے ایک نشان ہے اور اگر تو چاہے تو اس

    فاقرء اٰیۃ 3۱؂

    آیت وعد اللّٰہ الذین اٰمنوا منکم بخواں و ازاں مردم مباش کہ

    آیت وعداللّہ الذین اٰمنوا منکم کو پڑھ لے اور اپنے

    و لا تتبع الھوٰی ۔ فان فیھا وعد الاستخلاف

    پیروی ہوا و ہوس مے کنند چراکہ دریں آیت ایں وعدہ است کہ

    ہوا و ہوس کا پیرو مت بن کیونکہ اس آیت میں صاف وعدہ اس امت کے لئے ایسے خلیفوں کا ہے جو ان خلیفوں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 76

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 76

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/76/mode/1up


    لھٰذہ الامۃ کمثل الذین استخلفوا من قبل

    ہمچو سلسلہ خلافت بنی اسرائیل اینجا ہم خلیفہ ہا خواہند بود۔

    کی طرح ہوں جو بنی اسرائیل میں گذر چکے ہیں

    والکریم اذا وعد وفا ۔ وانا لا نعلم اسماء

    وکریم تخلف وعدہ نمے کند وما نام آں خلیفہ ہانمی دانیم کہ

    اور کریم جب وعدہ کرتا ہے تو اسے پورا کرتا ہے اور ہم ان تمام خلیفوں کے نام نہیں جانتے

    خلفاء سبقونا من ھٰذہ الامۃ من قبل الا قلیلًا

    پیش ازما گذشتند۔ مگر چند کس از

    جو ہم سے پہلے گذر چکے ہیں مگر اس امت کے اور

    ممن مضٰی ۔ وما قص علینا ربنا قصص

    گذشتگان ایں امت وپیشینیاں و خدا نیز از نام آں ہمہ مارا اطلاع نہ داد

    اگلی امتوں کے چند گذرے ہوئے آدمی۔ اور خدا نے ان سب کے نام سے بھی ہم کو اطلاع نہیں دی

    کلھم وما انبأنا باسماءھم فلا نؤمن بھم

    پس ایمان نمے آریم برایشاں

    پس ہم ان پر اجمالی طور پر

    الااجمالًا ونفوض تفصیلھم الٰی ربنا الاعلٰی ۔

    مگر مجملاً وتفصیل نام ہائے اوشاں را بخدائے بزرگ خود می سپاریم

    ایمان لاتے ہیں اور ان کے ناموں کی تفصیل کو اپنے خدا کو سونپتے ہیں

    ولٰکنا الجئنا بنص القراٰن الٰی ان نؤمن

    مگر ما از روئے نص قرآن برائے ایں امر مجبور شدیم کہ بریں ایمان آریم کہ

    مگر ہم قرآن کی نص کے رو سے اس بات پرمجبور ہوگئے کہ اس بات پر ایمان لائیں کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 77

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 77

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/77/mode/1up


    بخلیفۃٍ منا ھو اٰخر الخلفاء علٰی قدم عیسٰی ۔

    آخری خلیفہ از ہمیں امت خواہد بود کہ برقدم عیسٰی خواہد آمد

    آخری خلیفہ اسی امت میں سے ہوگا اور وہ عیسٰی کے قدم پر آئے گا

    وماکان لمؤمنٍ ان یکفر بہٖ فانہٗ کفرٌ بکتاب

    و مجال ہیچ مومن نیست کہ انکار ایں کند چراکہ ایں انکار کتاب اللہ است

    اور کسی مومن کی مجال نہیں کہ اس کا انکار کرے کیونکہ یہ قرآن کا انکار ہے

    اللّٰہط ولا یفلح الکافر حیث اتٰی ۔ وفَکّر فی

    وہرکہ منکر کتاب اللہ است و ہر جاکہ رود مورد عذاب الٰہی است و فکر کن در قرآن

    اور جو کوئی قرآن کا منکر ہے وہ جہاں جاوے خدا کے عذاب کے نیچے ہے اور تو قرآن میں ایسا فکر کر

    القراٰن حق الفکر ولا تکن کالذی استکبر و

    چنانکہ حق فکر است و ہمچو شخصے مباش کہ از راہ تکبر سر مے پیچد

    جیسا کہ فکر کرنے کا حق ہے اور اس شخص کی طرح نہ ہو جو تکبر کر کے سر پھیر لیتا ہے

    ابٰی ۔ وانہ الحق من ربنا فاقرء سورۃ النور

    وہمیں امر از خدا حق است پس سورہ نور را از راہ تدبر بخواں

    اور یہی بات خدا کی طرف سے حق ہے۔ پس سورہ نور کو غور سے پڑھ

    متدبّرًا لیتجلّٰی علیک ھٰذا النورکالضحٰی ۔

    تاکہ برتو ایں نور ہمچو وقت چاشت ظاہر گردد

    تاکہ تجھ پر یہ نور دن کی طرح ظاہر ہو

    واقرء اٰیۃ3 ؂۱

    وہم چنیں آیت 3 بخواں

    اور اسی طرح 3 کی آیت پڑھ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 78

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 78

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/78/mode/1up


    وکفاک ھٰذان الشاھدان ان کنت تسمع و

    و ترا ایں ہر دو گواہ کفایت مے کنند اگر مے شنوی و

    اور تجھے یہ دونوں گواہ کافی ہیں اگر تو دیکھتا اور سنتا

    ترٰی۔ فحاصل الکلام ان سلسلۃ الخلفاء

    مے بینی پس حاصل کلام این است کہ سلسلہ خلفاء محمدیہ

    ہے پس حاصل کلام یہ ہے کہ محمدی خلیفوں کا سلسلہ

    المحمدیۃ قد وقعت کسلسلۃ خلفاء موسٰی۔

    ہمچو سلسلۂ خلفاء موسویہ واقع شدہ است

    موسوی خلیفوں کے سلسلہ کی مانند واقع ہے۔

    وکذالک کان الوعد فی القراٰن من رب

    و ہم چنیں از خدائے آسمان بلند در قرآن وعدہ بود

    اور اسی طرح بلند آسمان کے خدا کی طرف سے قرآن شریف میں وعدہ تھا

    السمٰوات العلٰی ۔ فان اللّٰہ قد اذ

    خلف قومًا

    چراکہ خدائے تعالیٰ

    کس لئے کہ خدا تعالیٰ نے

    من قبل من بنی اسراء یل واصطفٰی ۔ واکرم

    ازیں پیشتر در بنی اسرائیل سلسلہ خلفاء قائم کرد و اوشاں را برائے

    اس سے پہلے بنی اسرائیل میں خلیفوں کا سلسلہ قائم کیا اور ان کو خلافت کے لئے قبول کیا

    بنی اسراء یل وجعل فیھم النبوۃ ومَھّلھم

    خلافت برگزید۔ وبنی اسرائیل را عزت داد و درایشاں نبوت نہاد۔ و اوشاں را مہلتے داد

    اور بنی اسرائیل کو عزت دی اور ان میں نبوت قائم کی اور ان کولمبی مہلت دی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 79

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 79

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/79/mode/1up


    حتّٰی طال علیھم العمر وترکوا التقوٰی ۔ فلما

    تا آنکہ زمانہ دراز بر ایشاں گذشت و تقویٰ را ترک کردند پس ہر گاہ

    یہاں تک کہ زمانہ دراز ان پرگذرا اور انہوں نے تقویٰ کو ترک کیا پس جس وقت

    انقضٰی علیھم ثلٰث ماءۃٍ بعد الالف من

    کہ یک ہزار و سہ صد سال

    کہ تیرہ سو برس موسیٰ علیہ السلام کی بعثت سے ان پر گذرے

    یومٍ بعث فیہ الکلیم الذی کلّمہ اللّٰہ

    از روز بعث موسیٰ علیہ السلام بر ایشاں گذشت آں موسیٰ کہ خدا ہمکلام

    وہی موسیٰ کہ جس سے خدا ہمکلام ہوا تھا اور جس کو

    و اجتبٰی ۔ بعث اللّٰہ رسولہٗ عیسی ابن مریم

    اوشدہ بودو او را برگزیدہ بود۔ خدا تعالیٰ حضرت عیسیٰ ابن مریم را در بنی اسرائیل مبعوث فرمود

    برگزیدہ کیا تھا۔ خدا تعالیٰ نے حضرت عیسیٰ بن مریم کو بنی اسرائیل میں مبعوث فرمایا

    فیھم وجعلہٗ خاتم انبیاء ھم وعلمًا لساعۃ

    و او را خاتم انبیاء بنی اسرائیل کرد وبرائے ساعت نقل نبوت و عذاب

    اور ان کو بنی اسرائیل کا خاتم الانبیاء بنایا اور نبوت کی انتقال کی ساعت کے لئے

    نقل النبوۃ مع العذاب ط فانذرھم وخشّٰی* ۔

    او را دلیلے گردانید و بدیں طور یہود را بترسانید

    ان کو دلیل ٹھہرایا اور اس طور سے یہود کو ڈرایا

    ان مریم ولدت ابنًا ما کان من بنی اسرائیل۔ ثم قیل فیھا

    بہ تحقیق مریم پسرے را بزاد کہ از بنی اسرائیل نبود باز در حق او گفتہ شد

    مریم ایک لڑکا جنی جو بنی اسرائیل میں سے نہیں تھا۔ پھر اس کے حق میں کہا گیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 80

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 80

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/80/mode/1up


    وماکان لہٗ ابٌ من بنی اسراء یل الّا امہٗ ۔

    وعیسیٰ علیہ السلام را از بنی اسرائیل ہیچ پدرے نہ بود مگر مادرے

    اور عیسیٰ علیہ السلام کا نبی اسرائیل میں سے سوائے ماں کے کوئی باپ نہ تھا۔

    وکذالک خلقہ اللّٰہ من غیرابٍ و اومأ فیہ

    و ہم چنیں خدا تعالیٰ بغیر پدر اورا پیدا کرد و دریں اشارت کرد

    اس طرح پر خدا نے ان کو بے باپ پیدا کیا۔ اور اس بے باپ پیدا کرنے میں ایک اشارہ

    ماقیل۔ وعَذّبوھا باقاویل۔ فکان ھٰذان الامران علمًا لساعۃ نقل النبوۃ

    آنچہ گفتہ شد۔ وبہ گونا گوں سخنہا اورا ایذا داد ند۔ پس ایں ہر دو امر دلیلے بود بر ساعت نقل نبوت از

    جو کہا گیا۔ اور طرح طرح کی باتوں سے اس کو دکھ پہنچایا گیا۔ پس یہ دونوں امر نقل نبوت کی گھڑی پر ایک دلیل تھے

    و علمًا لتعذیب ھٰذہ الفرقۃ۔ فاصاب الیھود ذلۃ باخراجہم من ھٰذا البستان۔

    خاندان یہود۔ ودلیلے بود برعذاب دادن ایں فرقہ را۔ پس یہود را دو ذلت رسید۔ یکے آنکہ از باغ نبوت اخراج ایشاں

    اور نیز اس بات پر کہ اس فرقہ کو عذاب پہنچایا جائیگا۔ پس یہود کو دو ذلتیں پہنچیں۔ ایک یہ کہ نبوت کے باغ سے

    و نقل النبوۃ الٰی بنی اسماعیل غضبًا من اللّٰہ الدیان۔ ثم اصابھم ذلۃ اخریٰ

    کردند۔ ونبوت در بنی اسماعیل منتقل فرمودند۔ وذلت دوم از دست بادشاہاں

    خارج کر دیئے گئے اور نبوت بنی اسماعیل میں منتقل ہوگئی اور دوسری ذلت اور عذاب بادشاہوں

    وقارعۃ من ملوک الزمان۔ بل من کل ملک الٰی ھٰذا الاوان۔

    زمانہ اوشاں را رسید بلکہ از دست ہر بادشاہ تا ایں وقت ذلت ہادید ند

    کے ذریعہ سے ان کو پہنچا بلکہ ہر ایک بادشاہ کے ذریعہ سے اس وقت تک

    وان فیھا لاٰ یۃً لاھل العلم والعرفان۔ منہ

    و دریں نشانے است برائے اہل علم و عارفان۔ منہ

    اور اس میں اہل علم اور عارفوں کیلئے نشان ہیں۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 81

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 81

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/81/mode/1up


    الٰی ما اومأ ۔ وکان ذالک اٰیۃً و علمًا للیھود

    آنچہ کرد وایں نشانے بود و دلیلے بود برائے یہود

    فرمایا جو فرمایا اور یہ ایک نشان اور دلیل تھی یہود کے لئے

    واخبارًا لھم فی رمزٍ قد اختفٰی ۔ و ارھاصًا

    دریں خبرے بود پوشیدہ یعنی اینکہ نبوت از خاندان شاں بدر خواہد رفت۔ و ارہاص بود

    اور اس میں ایک پوشیدہ خبر تھی اور وہ راز یہ تھا کہ بنی اسرائیل میں سے اب نبوت جاتی رہے گی اور ہمارے

    لظھور نبینا خیر الورٰی ۔ وماجعل اللّٰہ المسیح

    برائے ظہور پیغمبر ما صلی اللہ علیہ وسلم وخدا تعالیٰ حضرت مسیح علیہ السلام را

    پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے ارہاص تھا۔ اور خدا تعالیٰ نے حضرت مسیح علیہ السلام کو

    خاتم السلسلۃ الموسویۃ الّا غضبًا علی الیھود

    خاتم سلسلہ موسویہ از بہر ہمیں کرد تا غضب خود بر یہود فرود آرد

    موسوی سلسلہ کا خاتم اس لئے بنایا تاکہ اپنا غضب یہود پر ظاہر فرماوے

    فاھلکھم کما اھلک القرون الاولٰی ۔ ثم

    پس خدا اوشاں را ہلاک کرد چنانکہ ہلاک کرد امتہائے نخستیں را باز

    پس خدا تعالیٰ نے ان کو ہلاک کیا جیسے پہلی امتوں کو ہلاک کیا تھا اور پھر

    اختار اللّٰہ قومًا اٰخرین و وُلِدَ لھم ولدٌ

    خدا تعالیٰ قومے آخر را برگزید وبرائے شاں پسرے پاک

    خدا تعالیٰ نے ان کے بدلے اور قوم کو برگزیدہ کیا اور ان کے لئے ایک پاک اور

    طیبٌ من اُمّ القرٰی ۔ وھٰذا ھو محمّدٌؐ

    از مکہ معظمہ بزاد و آں پسر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم

    سعید و رشید بیٹا مکہ معظمہ میں پیدا کیا اور وہ مولود مسعود حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 82

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 82

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/82/mode/1up


    رسول اللّٰہ وحبیبہ الذی بُعث عند الفساد

    رسول خدا و حبیب اوست کہ در وقت فساد افتادن

    رسول خدا اور حبیب خدا ہیں کہ بحر و بر کے فساد

    فی البر والبحر وجُعل مثیل موسٰی ۔ لینجی

    در بیابان ہا و دریاہا مبعوث شد و او مثیل موسیٰ گردانیدہ شد تاکہ مردم را

    کے وقت مبعوث ہوئے اور مثیل موسیٰ قرار دیئے گئے تاکہ

    الناس من کل فرعونٍ طغٰی ۔ علیہ سلام اللّٰہ

    از ہر فرعون نجات دہد برو سلام خدا

    لوگوں کو ہر فرعون سے نجات دیں خدا کا سلام

    وصلواتہٗ الٰی یومٍ یُعطٰی لہ المقام المحمود و

    و درود او تا روزے کہ او را مقام محمود و

    اور درود ہو ان پر اس روز تک کہ جس روز تک مقام محمود اور

    الدرجات العلیا ۔ واقام اللّٰہ بہٖ سلسلۃً اُخرٰی ۔

    درجات بلند عطا کردہ شوند و قائم کرد خدا بدو سلسلہ دیگر را

    درجات بلند عطا کئے جائیں اور خدا تعالیٰ نے ان کے واسطہ سے ایک دوسرا سلسلہ قائم کیا

    کمثل سلسلۃ مُوْسٰی ۔ الذی ھو مثیلہٗ فی

    و آں سلسلہ مثل سلسلہ موسیٰ است آنکہ مثیل اوست دریں

    جو وہ سلسلہ اُس موسیٰ کے سلسلہ کی مانند ہے کہ وہ اس کا مثیل ہے

    ھٰذہٖ والعقبٰی ۔ وکان ھٰذا وعدٌ من اللّٰہ

    دنیا و عقبٰی و ایں وعدہ خدا تعالیٰ بود

    اس دنیا میں اور عقبٰی میں اور یہ خدا تعالیٰ کا وعدہ تھا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 83

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 83

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/83/mode/1up


    فی التوراۃ و الانجیل و القراٰن و من اوفٰی من

    در تورات و انجیل و قرآن و کیست زیادہ تر وفا کنندہ وعدہ را

    تورات اور انجیل اور قرآن میں اور وعدہ کا وفا کرنے والا اور

    اللّٰہ وعدًا و اصدق قیلًا ۔ ولما کان وعد

    و زیادہ تر راست گو از خدا تعالیٰ و ہرگاہ کہ وعدہ

    راست گو خدا تعالیٰ سے زیادہ کون ہے اور جس وقت کہ وعدہ

    المشابھۃ فی سلسلتی الاستخلاف وعدًا اُکّد

    مشابہت در سلسلہ ہر دو خلافت بود

    مشابہت خلافت کے دونوں سلسلہ میں تھا۔

    بالنون الثقیلۃ من اللّٰہ صادق الوعد الذی

    کہ از طرف خدا تعالیٰ بنون ثقیلہ مؤکد کردہ شدہ بود

    اور خدا تعالیٰ کی طرف سے نون ثقیلہ کے ساتھ مؤکد کیا گیا تھا

    ھو اوّل من وفٰی ۔ اقتضٰی ھٰذا الامر ان

    ایں امر تقاضا کرد کہ

    اس بات نے تقاضا کیا کہ

    یأتی اللّٰہ باٰخر السلسلۃ المحمّدیۃ خلیفۃً

    در آخر سلسلہ محمدیہ آں خلیفہ بیاید کہ

    سلسلہ محمدیہ کے آخر میں وہ خلیفہ آئے

    ھو مثیل عیسٰی ۔ فانّ عیسٰی کان اٰخر خلفاء

    او مثیل عیسٰی علیہ السلام باشد چرا کہ عیسٰی علیہ السلام خلیفہ آخری بود

    کہ وہ عیسٰی علیہ السلام کی مانند ہو کس لئے کہ عیسیٰ علیہ السلام موسٰی علیہ السلام کے خلیفوں میں سے آخری خلیفہ تھے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 84

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 84

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/84/mode/1up


    ملّۃ موسٰی کما مضٰی ۔ ووجب ان لایکون

    از خلفاءِ سلسلۂ موسٰی علیہ السلام چنانکہ گذشت۔ و واجب شد اینکہ نباشد

    جیسا کہ بیان ہوا اور واجب ہوا کہ یہ خلیفہ

    ھٰذا الخلیفۃ من القریش وان لا یأتی مع

    ایں خلیفہ کہ او آخر الخلفاء است از قریش و اینکہ نیاید

    جو خاتم الخلفاء ہے قریش میں سے نہ ہووے اور تلوار نہ اٹھائے

    السیف ولا یؤمر للوغٰی ۔ لیتم امر المشابھۃ

    بشمشیر و نہ حکم کند برائے جنگ تاکہ امر مشابہت بکمال رسد

    اور جنگ کا حکم نہ کرے تاکہ مشابہت پوری ہو جائے

    کما لایخفٰی ۔ ووجب ان یظھر تحت حکومۃ

    چنانکہ پوشیدہ نیست و واجب شد اینکہ ظاہر گردد زیر حکومت

    جیسا کہ پوشیدہ نہیں اور یہ بھی لازم ہوا کہ وہ ایک دوسری قوم کی حکومت کے نیچے

    قومٍ اٰخرین الذین ھم کمثل قومٍ بعث

    قومے دیگر کہ باشند ہمچو آں قوم کہ حضرت مسیح

    ظاہر ہووے جو وہ قوم مثل اس قوم کے ہو کہ حضرت مسیح

    المسیح فی زمن حکومتھم فانظر الٰی ھٰذہ

    علیہ السلام در زمانہ حکومت شاں ظاہر شد۔ پس بہ بیں

    علیہ السلام اس کی حکومت کے زمانہ میں ظاہر ہوئے تھے۔ پس اس مشابہت کو دیکھ

    المضاھاۃ فانھا اوضح واجلٰی ۔ وانت تعلم

    ایں مشابہت را چراکہ آں واضح تر و روشن تراست و تو میدانی کہ

    کہ کیسی واضح اور روشن تر ہے اور تو جانتا ہے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 85

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 85

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/85/mode/1up


    انّ عیسٰی قدجمع ھٰذہ الاربعۃ وکذالک

    حضرت عیسیٰ علیہ السلام ایں ہر چہار صفت را در خود جمع کردہ بود و ہم چنیں

    حضرت مسیح علیہ السلام یہ چاروں صفات اپنی ذات میں جمع رکھتے تھے اور اسی طرح

    اراد اللّٰہ فی مسیح ھٰذہ الامۃ وقضٰی ۔ لیتم

    ارادہ کرد، خدا تعالیٰ کہ ایں ہر چہار صفت در مسیح ایں امت نیز جمع باشند تا امر مماثلت

    خدا تعالیٰ نے ارادہ کیا کہ یہ چاروں صفات اِس اُمت کے مسیح میں بھی جمع ہوں تاکہ امر مماثلت

    امر المماثلۃ ولا یکون کقسمۃٍ ضیزٰی* ۔ وکان

    بوجہ اتم حاصل گردد و ہمچو قسمتے نباشد کہ در او کمی و بیشی بود

    بوجہ اتم حاصل ہوجائے اور ایسی نکمی تقسیم نہ ہو کہ اس میں کمی زیادتی کسی قسم کی رہ جائے۔ اور

    ان قیل ان المسیح قد خلق من غیر ابٍ من یدالقدرۃ ۔ وھٰذا

    اگر گفتہ شود کہ حضرت مسیح علیہ السلام بغیر پدر پیدا شدہ بود وایں امرے است فوق العادۃ

    اگر کہا جائے کہ حضرت مسیح علیہ السلام بے باپ پیدا ہوئے تھے اور یہ اک

    امرٌ فوق العادۃ۔ فلایتم ھناک شان المماثلۃ۔ وقد وجب المضاھاۃ

    پس شان مماثلت تمام نہ مے گردد و واجب است کہ باہم مشابہت

    امر فوق العادت ہے۔ پس شان مماثلت پوری نہیں ہوتی ہے اور باہم مشابہت کا ہونا ضروری ہے

    کما لایخفٰی علی القریحۃ الوقادۃ۔ قلنا ان خلق انسانٍ من

    باشد چنانکہ بر طبائع سلیمہ مخفی نیست میگوئیم کہ پیدا کردن انسان

    جو سلیم الطبع لوگوں پر پوشیدہ نہیں ہے۔ ہم کہتے ہیں کہ انسان کا

    غیر ابٍ داخلٌ فی عادۃ اللّٰہ القدیر الحکیم ۔ ولا نسلّم انہٗ

    بغیر پدر داخل در عادت الٰہی است و قبول نمے کنیم کہ ایں

    بے باپ پیدا کرنا عادت اللہ میں داخل ہے اور ہم اس کو قبول نہیں کرتے کہ یہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 86

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 86

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/86/mode/1up


    ھٰذاوعد اللّٰہ وان وعد اللّٰہ لا یبدل ولا ینسٰی ۔

    ایں وعدۂ خدا تعالیٰ بود و وعدۂ خدا تعالیٰ نہ قابل تبدیل و نہ لائق نسیان است۔

    یہ خدا تعالیٰ کا وعدہ تھا اور یہ خدا تعالیٰ کا وعدہ نہ قابل تبدیل اور نہ لائق سہو ہے۔

    خارجٌ من العادۃ ولا ھو حریٌ بالتسلیم* ۔ فان الانسان قد

    خارج از عادت است و نہ لائق است کہ قبول کردہ شود چراکہ انسان گا ہے

    خارج از عادت ہے اور نہ لائق ہے کہ اس بات کو قبول کیا جائے کس لئے کہ انسان کبھی

    یتولد من نطفۃ الامرأۃ وحدھا ولو علٰی سبیل الندرۃ ۔ ولیس

    پیدا میگردد از نطفۂ زن فقط اگرچہ بہ سبیل نادر باشد وایں امر

    عورت کے نطفہ سے بھی پیدا ہوجاتا ہے اگرچہ بات نادر ہو اور یہ امر

    ھوبخارجٍ من قانون القدرۃ۔ بل لہٗ نظائر وقصصٌ فی کل قومٍ

    خارج از قانون قدرت نیست بلکہ در ہر قوم نظیر ہائے ایں یافتہ می شوند

    قانون قدرت سے بھی خارج نہیں ہے بلکہ ہر قوم میں اس کی نظیریں پائی جاتی ہیں

    وقد ذکرھا الاطباء من اھل التجربۃ ۔ نعم نقبل ان

    و طبیبان اہل تجربہ ذکر آں نظیر ہا کردہ اند ایں امر قبول مے کنیم کہ

    اور اہل تجربہ طبیبوں نے ایسی نظیروں کا ذکر کیا ہے۔ ہاں ہم یہ بات قبول کر سکتے ہیں کہ

    الحاشیۃ علی الحاشیۃ :۔ الم تر انّ اٰدم علیہ السلام ماکان لہ

    آیا ندیدی کہ آدم علیہ السلام را نہ پدرے بود و نہ

    آیا تم نے نہیں دیکھا کہ حضرت آدم علیہ السلام کا نہ کوئی باپ

    ابوان فکون ھٰذا الامر من عادۃ اللّٰہ ثابت من ابتداء الزمان۔ منہ

    مادرے۔ پس داخل عادت اللہ بو دن ایں امر از ابتدائے زمانہ ثابت است۔ منہ

    تھا اور نہ ماں۔ پس یہ امر عادت اللہ میں داخل ہونا ابتدائے زمانہ سے ہی ثابت ہے۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 87

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 87

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/87/mode/1up


    الا تقرء ون کتاب اللّٰہ الیس فیہ ھٰذا الوعدط

    آیا نمے خوانید کتاب الٰہی را آیا در او ایں وعدہ نیست؟

    آیا تم کتاب الٰہی کو نہیں پڑھتے؟ کیا اس میں یہ وعدہ نہیں ہے؟

    ھٰذہ الواقعۃ قلیلۃٌ نسبۃً الٰی ما خالفھا من قانون التولید۔

    پیدا شدن بغیر پدر امریست قلیل الوقوع بہ نسبت آں امر کہ مخالف اوست

    بغیر باپ کے پیدا ہونا قلیل الوقوع امر ہے بہ نسبت اس امر کے کہ اس کا مخالف ہے

    وکذالک کان خلقی من اللّٰہ الوحید*۔وکان کمثلہٖ فی الندرۃ

    و مشابہ آں در امر ندرت پیدائش من بود

    اور اس امر عجیب کے مشابہ میری پیدائش ہے۔

    وکفٰی ھٰذا القدر للسعید۔ فانی ولدت تَوْءَ مًا و کانت صبیۃٌ

    چراکہ من بطریق توام پیدا شدہ بودم و بامن دخترے

    کس لئے کہ میں تو ام پیدا ہوا ہوں اور میرے ساتھ ایک

    تولدت معی فی ھٰذہ القریۃ۔ فماتت وبقیت حیًّا من

    پیدا شدہ بود کہ مرد ومن زندہ ماندم

    لڑکی پیدا ہوئی تھی جو وہ مر گئی اور میں زندہ رہ گیا

    امر اللّٰہ ذی العزۃ۔ ولاشک ان ھٰذہ الواقعۃ نادرۃٌ نسبۃ

    وہیچ شک نیست کہ ایں واقعہ نیز ہم نسبتًا

    اور اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ واقعہ بھی نسبتاً

    الحاشیۃ علی الحاشیۃ :۔ ومع ذالک انّی ارسلت فی المھزودتین و اعیش فی المرضین مرض فی الشقّ الاسفل ومرض فی الاعلٰی۔ فحیاتی اعجب من تولّد المسیح و اعجاز لمن یریٰ۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 88

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 88

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/88/mode/1up


    فاتقوا اللّٰہ الذی الیہ الرجعٰی ۔ ولا تکونوا

    پس بترسید ازاں خدا کہ سوئے او بازگشت است وہمچو کسانے نباشید

    خدا تعالیٰ سے ڈرو کہ خدا تعالیٰ کی طرف ایک دن جانا ہے ان لوگوں کی طرح نہ بن جاؤ

    الی الطریق المتعارف المشھود۔ ویکفی للمضاھاۃ الاشتراک

    سوئے عام قاعدۂ پیدائش ندرتے دارد و برائے مشابہت ایں قدر اشتراک کافی است

    عام پیدائش کے قاعدہ سے عجیب ہے اور مشابہت کے لئے اسی قدر اشتراک کافی ہے۔

    فی الندرۃ بھٰذا القدر عند اھل العقل والشعور۔ فان المشابھۃ

    چراکہ مشابہت

    کس لئے کہ مشابہت

    لاتوجب الا لونًا من المناسبۃ۔ ولا تقتضی الا رائحۃً من

    نہ مے خواہد مگر رنگے از مناسبت و بوئے

    و مماثلت سوائے ایک رنگ کی مناسبت کے اور کچھ نہیں چاہتی ہے۔اور وہ اس جگہ

    المماثلۃ۔ وانا اذا قلنا مثلًا ان ھٰذا الرجل اسدٌ بطریق المجاز

    از مماثلت و آں اینجا حاصل است۔ وما چوں بگوئیم کہ مثلاً ایں مرد شیراست بطریق مجاز

    حاصل ہے مثلاً جب ہم بطریق مجاز و استعارہ یہ کہیں کہ یہ مرد شیر ہے

    والاستعارۃ۔ فلیس علینا من الواجب ان نثبت لہٗ کلما یوجد

    واستعارہ پس دریں برما واجب نیست کہ ما ثابت کنیم کہ ہمہ آں اعضا

    پس ہمیشہ یہ لازم وواجب نہیں ہے کہ ہم یہ ثابت کریں کہ تمام اعضاء وصفات

    فی الاسد من الذنب والزئر وھیءۃ الجلد وجمیع لوازم

    وصفات کہ در شیر یافتہ مے شوند ہمچو دم و آواز و صورت جلد و جمیع لوازم درندگی در و

    اس شیر کے اس مرد میں پائے جاتے ہیں چنانچہ دم و آواز اور بال اور کھال اور تمام درندگی کے لوازم بھی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 89

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 89

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/89/mode/1up


    کالذین یقرء ون القراٰن ومایبالون ما امر القراٰن

    کہ قرآن می خوانند وہیچ پر وائے امر و نہی او

    کہ قرآن شریف پڑھتے ہیں اور اس کے امر ونہی کی

    السبعیۃ۔ ثم اعلم ان تولد عیسی ابن مریم من غیرابٍ

    نیز یافتہ شوند۔ باز بداں کہ پیدائش حضرت عیسیٰ علیہ السلام بغیرپدر

    اس میں ہوں پھر جان تو کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا بے باپ پیدا ہونا

    من بنی اسرائیل بھٰذ الطریق۔ تنبیہٌ للیھود وعلمٌ لساعتھم

    از بنی اسرائیل بدیں طریق تنبیہ است برائے یہود و دلیل است برائے

    بنی اسرائیل میں سے یہود کے لئے ایک تنبیہ ہے اور ان کے زوال

    واشارۃٌ الٰی ان النبوۃ مُنْتَزَعٌ منھم بالتحقیق۔ واما مسیح

    ساعت زوال ایشاں و اشارہ است سوئے ایں کہ نبوت بالتحقیق از ایشاں منتقل خواہد شد۔ مگر

    کی گھڑی پر ایک دلیل ہے اور اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ ضرور نبوت ان سے منتقل ہو جائیگی

    ھٰذہ الامۃ فولد توأمًا من ذکرٍ و انثٰی وفُرّق بینہٗ و

    مسیح ایں امت از ذکر و انثٰی توام زادہ شد وعلیحدہ کردہ شد مادۂ انثیت ازو

    مگر اس امت کا مسیح مذکر و مؤنث سے توام پیدا ہوا ہے اور مادۂ انثیت اس سے علیٰحدہ

    بین مادۃ النساء ۔ وفی ذالک اشارۃٌ الٰی ان اللّٰہ یبث بہٖ

    و دریں اشارت است سوئے ایں معنٰی کہ خدا تعالیٰ بسیار کس

    کر دیا گیا ہے اور اس میں اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ خدا تعالیٰ اس

    کثیرًا فی ھٰذہ الفءۃ رجال الصدق والصفاء۔ فالاغراض

    ازیں گروہ صاحب صدق و صفا پیدا خواہد کرد پس

    گروہ میں بہت مرد پیدا کرے گا جو صاحب صدق و صفا ہوں گے۔ پس



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 90

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 90

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/90/mode/1up


    ومانھٰی ۔ واذا قیل لھم اٰمنوا بما وعداللّٰہ و

    نہ مے کنند و چوں گفتہ شود ایشاں را کہ ایمان آرید بوعدہ الٰہی و

    کچھ پروا نہیں کرتے جب ان کو کہا جاتا ہے کہ خدا تعالیٰ کے وعدہ پر ایمان لاؤ اور

    لا تنسوا نصیبکم من رحمۃٍ تُرْجٰی ۔ قالوا لاندری

    نصیب خود از رحمتے کہ امید داشتہ شدہ فراموش نہ کنید میگویند کہ ما نمی دانیم کہ

    جس رحمت کے تم امیدوار ہو اس میں سے اپنا حصہ نہ گنواؤ تو کہتے ہیں کہ ہم نہیں جانتے

    ما الوعد ط وطبع علٰی قلوبھم فلا یسمع احدٌ

    وعدہ چہ باشد و بردل ایشاں مہر کردہ شدہ پس ہیچ کس از

    کہ وعدہ کیا ہوتا ہے اور ان کے دل پر مہر لگی ہوئی ہے کوئی بھی ان میں سے نہیں دیکھتا

    منھم ولایریٰ ۔ ولا یقبلون الحق وقد اٰتینا

    ازیشاں نمی شنود ونمی بیند و قبول نمی کنند حق را وحالانکہ دادیم

    اور نہیں سنتا اور حق کو قبول نہیں کرتا حالانکہ ہم نے

    الدلائل کدرٍ ابھٰی ۔ الا ینظرون الی القراٰن او

    ایشاں را دلائل ہمچو گوہرہائے روشن آیا نمے بینند سوئے قرآن یا

    چمکدار موتیوں کی طرح ان کو دلائل دیئے۔ کیا قرآن کی طرف نہیں دیکھتے یا

    مختلفۃٌ فی ھٰذا وفی ذالک فلذالک اختلف طریق التولید

    دریں ہر دو پیدائش اغراض مختلف ہستند۔ پس برائے ہمیں در طریق تولید

    ان دونوں پیدائشوں میں مختلف اغراض ہیں۔ اس لحاظ سے طریق ولادت میں

    من حضرۃ الکبریاء ۔ منہ

    اختلاف است ۔ منہ

    اختلاف واقع ہوا ہے۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 91

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 91

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/91/mode/1up


    علی الابصار غشاوۃٌ فما یرون ماطلع وتجلّٰی۔

    بر چشم ہائے ایشاں پردہ است پس نمے بینند آنچہ طلوع کرد و تجلی نمود

    ان کی آنکھوں پرپردہ ہے جو وہ اس تجلی کی طرف جو طلوع ہوئی ہے نظر نہیں کرتے

    ومنھم قومٌ اُعطوا علمًا ثم یمرّون کالذی

    و از ایشاں قومے است کہ اوشاں را اند کے علم دادہ شد باز ہمچو کسے مے گذرند

    اور ان میں ایک قوم ہے جس کو علم تھوڑا سا دیا گیا ہے تسپر بھی اعراض و انکار ہی کرتے ہیں

    اعرض وابٰی ۔ ولئن سألتھم ما وعد اللّٰہ ربّکم

    کہ اعراض و انکار می کنند و اگر پرسیدہ شود از ایشاں کہ خدائے شماچہ وعدہ کردہ است

    اگر ان سے پوچھا جائے کہ تمہارے خدا نے کیا وعدہ فرمایا ہے

    الاعلٰی ۔ لیقولن انہٗ وعد المؤمنین ان یستخلف

    البتہ مے گویند کہ او مومنان را ایں وعدہ دادہ است کہ ہم ازیشاں خلیفہ ہا

    تو اس کے جواب میں کہتے ہیں کہ ہاں خدا نے یہ وعدہ مومنوں سے ضرور کیا ہے کہ ان میں

    منھم کما استخلف من قوم موسٰی ۔ فقد اقرّوا

    پیدا خواہد کرد ہمچو آں خلیفہ ہا کہ از قوم موسیٰ علیہ السلام پیدا کردہ بود پس بمشابہت

    خلیفے پیدا کئے جاویں گے ان خلیفوں کی مانند جو موسیٰ علیہ السلام کی قوم میں خلیفے پیدا کئے تھے۔ پس دونوں

    بتشابہ السلسلتین ثم ینکرون کبصیرٍ تعامٰی۔

    ہر دو سلسلہ اقرار کردہ اند باز ہمچو کسے انکار مے کنند کہ بینا باشد و خودرا نابینا نماید

    سلسلوں کی مشابہت کا اقرار کرتے ہیں پھر ایسے شخص کی طرح انکار کر بیٹھے ہیں کہ وہ سوجا کھا ہو اور اپنے

    ولمّا کان نبینا مثیل موسٰی ۔ وکان سلسلۃ

    وہرگاہ نبی ما صلی اللہ علیہ وسلم مثیل موسیٰ بود وسلسلہ خلفائے او

    آپ کو اندھا بنالے اور جس حالت میں ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم مثیل موسیٰ ٹھہرے اور نیز سلسلہ خلفاء



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 92

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 92

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/92/mode/1up


    خلفاء ہٖ مثیل السلسلۃ الموسویۃ بنصٍ اجلٰی۔

    علیہ السلام مثیل سلسلہ موسیٰ علیہ السلام بود چنانکہ نص صریح براں دلالت می کند

    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم مثیل سلسلہ موسی علیہ السلام قرار پایا جیسا کہ نص صریح اس پر دلالت کرتی ہے

    وجب ان تختتم السلسلۃ المحمدیۃ علٰی

    پس واجب شد کہ سلسلہ محمدیہ براں خلیفہ ختم گردد کہ

    پس واجب ہوا کہ سلسلہ محمدیہ ایک ایسے خلیفہ پر ختم ہو

    خلیفۃٍ ھو مثیل عیسٰی ۔ کما اختتم علی

    او مثیل عیسٰی علیہ السلام باشد چنانکہ سلسلہ حضرت موسیٰ علیہ السلام

    کہ وہ مثیل عیسیٰ علیہ السلام ہووے جیسا کہ سلسلہ حضرت موسیٰ علیہ السلام

    ابن مریم سلسلۃ صاحب العصا ۔ لیطابق

    بر حضرت عیسیٰ علیہ السلام ختم شد تاکہ ایں ہر دو سلسلہ

    حضرت عیسیٰ علیہ السلام پر ختم ہوا تاکہ یہ دونوں سلسلے

    ھٰذہ السلسلۃ بسلسلۃٍ اولٰی ۔ ولیتم وعد

    باہم مطابق شوند تاکہ وعدہ مماثلت

    باہم مطابق ہو جائیں اور تاکہ وعدہ مماثلت اس سلسلہ کے خلیفوں کا اور

    مماثلۃ الاستخلاف کما ھوظاھرٌ من لفظ کما۔

    خلیفہ ہائے ایں سلسلہ وآں سلسلہ باتمام رسد چنانکہ امر مماثلت از لفظ کما ظاہر است کہ

    اس سلسلہ کے خلیفوں کا پورا ہو جائے جیسا کہ امر مماثلت کما کے لفظ سے ظاہر ہے جو

    فأرونی خلیفۃً من دونی جاء علٰی قدم

    در آیت موجود است۔ پس بنمائید مرا بجزمن آں خلیفہ را کہ بر قدم حضرت

    آیت میں موجود ہے۔ اب مجھ کو وہ خلیفہ دکھاؤ کہ بجز میرے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے قدم پر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 93

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 93

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/93/mode/1up


    ابن مریم منکم علٰی اجلٍ یشابہ اجلًا مضٰی۔

    عیسٰی علیہ السلام از ہمیں امت آمدہ باشد و زمانہ او زمانہ حضرت مسیح را مشابہ باشد

    اس امت میں سے آیا ہو اور اس کا زمانہ اور حضرت مسیح کا زمانہ مشابہ ہو

    وقد انقضت مدۃٌ من نبیّنا الٰی یوم بعثنا

    وبہ تحقیق از زمانہ پیغمبر ما صلی اللہ علیہ وسلم تا ایں وقت

    اور یہ تحقیق ہو چکا ہے کہ ہمارے پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے اس وقت تک وہی

    ھٰذا ۔کمثل مدۃٍ کانت بین موسٰی وعیسٰی۔

    آں مدت گذشتہ است کہ در زمانہ موسیٰ علیہ السلام و عیسٰی علیہ السلام بود

    مدت گذری ہے کہ جو مدت زمانہ موسیٰ علیہ السلام سے عیسیٰ علیہ السلام تک گذری تھی

    وان فی ذالک لاٰیۃً لقومٍ یطلبون الھدٰی۔

    و دریں اشارت است آناں را کہ ہدایت مے طلبند

    اور اس میں ہدایت طلب کرنے والوں کے لئے اشارہ ہے۔

    فما لکم لم تنتظرون نزول المسیح من السماء۔

    پس چہ شد شمارا کہ انتظار مسیح از آسمان مے کنید

    تمہیں کیا ہوگیا کہ تم مسیح کا انتظار سے کررہے ہو

    انسیتم ماتقرء ون فی القراٰن او رضیتم

    آیا فراموش کردہ اید آنچہ در قرآن شریف مے خوانید یا بدیں امر راضی شدہ اید

    اور تم نے جو قرآن شریف میں پڑھا ہے اس کو بھولتے ہو کیا اس بات پر راضی ہوگئے

    بتکذیب کلام ربّکم الاعلٰی ۔ ا تکفرون

    کہ تکذیب کلام الٰہی کنید آیا انکار

    کہ کلام الٰہی کی تکذیب ہو تم اس



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 94

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 94

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/94/mode/1up


    بکتاب اللّٰہ وھو بحرٌ من المعارف وماءٌ

    کتاب الٰہی مے کنید و آں دریائیست از معارف وآبے است

    کتاب اللہ سے انکار کرتے ہو جو معارف کا دریا اور صاف و شفاف

    اصفٰی ۔ وکیف اِسْتَطَبْتُم ان تترکوا الفرقان

    نہایت صاف و شفاف۔ وچگونہ خوش آمد شمارا کہ قرآن شریف را

    پانی ہے اور تمہیں کیونکر یہ بات پسند آگئی کہ قرآن شریف کو

    الحمید لاقوالٍ شتّٰی ۔ اتستبدلون الذی ھو

    برائے آں قولہا می گذاریدکہ متفرق وبے سروپا ہستند۔آیا ادنیٰ را

    ان اقوال کے بدلے چھوڑتے ہو جو بے سروپا اور متفرق ہیں اور ادنیٰ کو

    ادنٰی بالذی ھو خیرٌ و انّ الظنّ لایغنی من

    بعوض اعلیٰ ترک می کنید و ظن از حق

    اعلیٰ کے عوض میں ترک کرتے ہو اور ظن حق سے کسی طرح مستغنی

    الحقّ شیءًا ۔ وقد جمع الشمس والقمر کما

    ہیچ مستغنی نمی کند و جمع کردہ شد آفتاب و ماہ ہمچناں کہ

    نہیں کرتا اور چاند اور سورج جمع کئے گئے جیسا کہ

    ذکر القراٰن وکسفا فی رمضان کشق القمر

    ذکر آں در قرآن شریف آمدہ است و ہر دو را در رمضان کسوف گرفت ہمچو شق القمر

    قرآن شریف میں ذکر آیا ہے اور دونوں کا رمضان شریف میں کسوف و خسوف ہوگیا جیسے کہ پیغمبر خدا

    فی زمن خیر الورٰی۔ وعطلت العشار لمن یّرٰی۔

    در زمانہ پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم ومعطل کردہ شدند شتراں

    صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں شق القمر ہوا اونٹ بے کار کئے گئے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 95

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 95

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/95/mode/1up


    ووھبت لنا مطیۃٌ اخرٰی ۔ لنقدرعلی السیاحۃ

    و دادہ شد بجائے شاں سواری دیگر تا ما از مسیح زیادہ تر

    اور ان کی جگہ اور سواری عطا ہوئی تاکہ ہم مسیح سے زیادہ

    ازید من المسیح ونجعل امر التبلیغ اکمل

    برسیاحت قادر شویم و امر تبلیغ را ازو کامل تر

    سیاحت پر قادر ہوں اور اس سے زیادہ کامل تبلیغ کو

    منہ واوفٰی ۔ وانظروا الٰی فضل اللہ انہٗ اظھر

    بجا آریم وسوئے فضل خدا تعالیٰ بہ بینید کہ او

    بجالاویں خدا تعالیٰ کے فضل کی طرف دیکھو کہ اس نے

    لی شھادۃً من السماء ۔ وشھادۃً من الارض

    برائے من یک گواہی از آسمان و یک گواہی از زمین

    میرے لئے ایک گواہی آسمان سے اور ایک گواہی زمین سے

    وشھادۃً من بینھما وأَرَی الامر کضوء الضحٰی ۔

    و یک گواہی از میان ایں ہر دو ظاہر فرمود و ہمچو روشنی وقت چاشت حقیقت را بنمود

    اور ایک ان دونوں میں ظاہر فرمائی اور چاشت کے وقت کی روشنی کو دکھلا دیا۔

    الا ترون الٰی تشابہٍ فی امر استخلافٍ اتٰی۔

    آیا نمے بینید سوئے آں مشابہت کہ در سلسلہ ایں خلافت ست کہ بیامدودر

    تم اس مشابہت کی طرف نہیں دیکھتے جو اس سلسلہ کے خلافت کے امر میں اور بنی اسرائیل کے

    واستخلافٍ خلا ۔ وان فی ذالک لاٰیۃً لمن تیقّظ

    سلسلہ خلافت بنی اسرائیل درمیان است۔ و دریں نشانے است برائے آنانکہ از خواب غفلت

    سلسلہ کے خلافت میں ہے اس میں ایک نشان ہے ان کے لئے جو خواب غفلت سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 96

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 96

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/96/mode/1up


    و ارق الکرٰی ۔ الا ترون الٰی زمنٍ بعثت فیہ

    بیدار مے شوند آیا نمے بینید سوئے ایں زمانہ کہ درو مبعوث شدم

    بیدار ہونا چاہتے ہیں۔ کیا تم اس زمانہ کو جس میں میں مبعوث ہوا نہیں دیکھتے کہ

    وقد جئتکم بعد رسول اللّٰہ المصطفٰی ۔ الٰی

    کہ من بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم

    کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد اتنی ہی مدت میں آیا ہوں جو مدت

    امدٍ کان بین موسٰی وعیسٰی ۔ وان فی ذٰالک

    دراں قدر مدت آمدہ ام کہ آں مدت در موسیٰ علیہ السلام و عیسیٰ علیہ السلام است یعنی چہار دہ صد سال۔ و دریں

    موسیٰ علیہ السلام اور عیسیٰ علیہ السلام میں چودہ سو سال کی تھی اس میں عقلمندوں کے لئے

    لاٰیۃً لاولی النھٰی۔ فانظروا کیف اجتمعت

    نشانے است برائے عقلمنداں پس بہ بینید کہ چگونہ خدا نشانہا

    ایک نشان ہے۔ دیکھو کہ خدا نے کیونکر بہت سے

    الاٰیات من اللّٰہ ذی المجد والعلٰی۔ فکُسف القمر

    جمع کردہ است وچگونہ کسوف ماہ

    نشان جمع کر دیئے اور کیونکر چاند و

    والشمس فی شھر الصیام وترک القلاص فلا

    وآفتاب در رمضان شد و شتراں از سواری

    سورج کا گرہن رمضان میں ہوا اور اونٹ کی سواری

    یُحمل علیھا ولا تُمْتطٰی۔ ومعھا اٰیاتٌ اخرٰی ۔

    معطل کردہ شدند و دیگر نشانہا نیز ہستند۔

    بے کار ہوئی اور ان کے سوا اور بھی نشانات ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 97

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 97

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/97/mode/1up


    وھل اجتمعت ھٰذہٖ قط لکذاب ن افتریٰ ۔

    آیا گاہے ایں نشانہا برائے مفتری جمع شدہ اند

    کیا کبھی یہ نشان کسی مفتری کے لئے جمع ہوئے ہیں؟

    فاتقوا جھنم التی تأکل المجرمین وان المجرم

    پس ازاں جہنم بترسیدکہ مجرمانرا خواہد خورد و مجرم

    اس دوزخ سے ڈرو کہ جو مجرموں کو کھا جانے والی ہے اور مجرم

    لا یموت فیھا ولا یحيٰ ۔ أَ تنبذون کتاب اللّٰہ

    دراں نخواہد مرد و نہ زندہ خواہد ماند آیا کتاب اللہ را پس پشت مے انداز ید

    اس میں نہ مریں گے اور نہ جےئیں گے۔ کیا کتاب اللہ کو پس پشت ڈالتے ہو

    وراء ظھورکم وتتبعون اقوالًا اخریٰ ۔ وان ھو

    و سخن ہائے دیگر را پیروی مے کنید و ایں چنیں عادت

    اور دوسری باتوں کی پیروی کرتے ہو یہ عادت

    الا بغیٌ وظلمٌ وخروجٌ من الھدٰی ۔ والخیر کلہٗ

    سراسر بغاوت و ظلم و از ہدایت بیرون شدن است۔ و خیر ہمہ

    سراسر بغاوت اورظلم اور ہدایت سے دور ہونے کی ہے۔ سب بھلائیاں

    فی القراٰن والتمسک بہٖ من دأب التُقٰی۔ وان

    در قرآن است و پیروی او از طریق پرہیزگاری است و

    قرآن شریف میں ہیں اورس کی پیروی پرہیزگاری کا طریق ہے۔

    الارض والسماء قد شھدتا لی وھل تشھدان

    زمین و آسمان برائے من گواہی دادہ اند و آیا ایں ہر دو

    زمین و آسمان نے میری گواہی دی کیا صادق کے سوا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 98

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 98

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/98/mode/1up


    الا لصادقٍ اذ ادّعٰی ۔ فاعلموا انی انا المسیح الموعود

    بجز صادقے برائے دیگرے گواہی مے دہند پس بدانید کہ من بہ تحقیق مسیح موعود

    زمین و آسمان دوسرے کی گواہی اس طور سے دے سکتے ہیں۔ دیکھو میں بہ تحقیق مسیح موعود

    والمھدی المعھود من اللّٰہ الاحفٰی۔ و ارسلت عند

    و مہدئ معہود ہستم از خدائے کہ مہربان است و فر ستادہ شدم

    اور مہدی معہود ہوں خدائے مہربانی کی طرف سے میں بھیجا گیا ہوں۔

    صول الصلیب وکون الاسلام کالغریب لیتم بی

    بوقت غلبۂ صلیب و بودن اسلام ہمچو غریب تاکہ وعدہ خدا تعالیٰ

    صلیبی غلبہ اور اسلامی غربت کے وقت تاکہ خدا تعالیٰ

    الوعد الحق وماکان حدیثا یفتریٰ۔ولوکنت

    باتمام رسد و ایں آں حدیثے نیست کہ کسے افترا کردہ باشد و اگر

    کا وعدہ پورا ہو اور یہ ایسی بات نہیں ہے کہ افتراکے طور پر بیان کی ہو اگر میں

    مفتریًا غیر صادقٍ لما اجتمع لی من الاٰي ما

    مفتری بودمے و صادق نبود مے ایں ہمہ نشانہا کہ در من جمع شدہ اند ہرگز

    مفتری ہوتا اور صادق نہ ہوتا تو یہ تمام نشان جو مجھ میں جمع کئے گئے ہیں ہرگز

    اجتمع وان اللّٰہ لایؤید من کَذَبَ وافترٰی

    جمع نشدندے و خدا تائید آں کسے نمے کند کہ برخدا افترا کردہ باشد

    جمع نہ ہوتے اور خدا تعالیٰ اس کی تائید نہیں کرتا جو خدا تعالیٰ پر افترا باندھے

    علی اللّٰہ واعتدٰی ۔ وان فی زمانی ومکانی و

    واز حد در گذشتہ و تحقیق در زمان من و مکان من و

    اور حد سے گذر جائے بہ تحقیق میرے زمانہ میں میرے مکان میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 99

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 99

    http://www.alislam.org/library/brow...in_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/99/mode/1up


    قومی وعدا قومی لاٰیاتٌ علٰی صدقی لمن تدبر وما

    قوم من و قوم دشمنان من برائے تدبر کنندگاں نشانہا ہستند

    میری قوم میں میرے دشمنوں کی قوم میں تدبر کرنے والوں کے لئے نشان ہیں

    استکبر وماعلا ۔ وجئتکم حکمًا عدلًا لابین

    ومن حکم و عدل شدہ آمدہ ام تا درمیان شما

    اور میں حکم اور عدل ہو کر آیا ہوں تاکہ تم میں

    لکم بعض الذی تختلفون فیہ ولاقتل کل

    درامور مختلف فیہ شما فیصلہ کنم

    تمہارے مختلف امور میں فیصلہ کر دوں

    حیّۃٍ تسعٰی* ۔ وما جئت فی غیر وقتٍ بل

    و من در غیر وقت نیامدہ ام بلکہ

    اور میں بے وقت نہیں آیا ہوں بلکہ

    جئت علٰی رأس الماءۃ وعندفتنٍ بلغت

    بر سرصدی آمدہ ام و در وقتے کہ آں فتنہا

    عین وقت اور صدی کے سر پر آیا ہوں اور اس وقت کہ جب فتنے

    المنتھٰی ۔ وما جئت من غیر برھانٍ وقد

    بانتہا رسیدہ اند و نہ بغیر حجت و دلیل آمدہ ام و

    انتہا کو پہنچ گئے ہیں۔ اور نہ بغیر حجت اور دلیل کے آیا ہوں اور

    نزلت الاٰی من السَّمٰوات العلٰی۔ وجحد

    بسیار نشانہا ظاہر شدہ اند و زبان ہا

    بہت سے نشان ظاہر ہوگئے ہیں زبانوں نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 100

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 100

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/100/mode/1up


    الالسن واستیقن القلوب وھدی اللّٰہ من

    انکار کردند و دلہا یقین کردہ اند وخدا ہر کرا خواست

    انکار کیا اور دلوں نے یقین کر لیا ہے خدا تعالیٰ جس کو چاہے

    ھدٰی ۔ ا تمارون فی امری وقد حصحص الحق

    ہدایت کرد آیا در امر من شک مے کنید وتحقیق ظاہر شد حق

    ہدایت کرے کیا تم میرے امر میں شک کرتے ہو حالانکہ جس قدر ثبوت کے ساتھ حق ظاہر ہونا

    وظھرت دلائل لا تُعَدُّ وتُحْصٰی ۔ الا تنظرون

    وچنداں دلائل بظہور آمدند کہ شمار نتواں کرد آیا نمے بینید

    چاہئے تھا وہ ظاہر ہوگیا۔ اور اس قدر دلائل ظاہر ہوئے کہ جو ان گنت ہیں۔ قرآن شریف کی طرف

    الی القراٰن وانہٗ یشھد لی ببیانٍ اوضح واجلٰی۔

    سوئے قرآن شریف و آں بہ بیان واضح و روشن گواہی مے دہد

    تم نہیں دیکھتے کہ وہ واضح اور روشن بیان سے میری گواہی دیتا ہے۔

    وھل اتاک حدیث خیر الوریٰ ۔ اذ قال کیف

    و آیا شمارا خبرے است از حدیث صلی اللہ علیہ وسلم کہ گفت چگونہ حال

    تمہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث کی بھی خبر ہے جبکہ آپ نے فرمایا کہ تمہارا

    انتم اذ نزل فیکم ابن مریم وامامکم منکم

    شما خواہد بود چوں ابن مریم درمیان شما فرود خواہد آمد واو امام شما است ہم از شما یعنی از قومے دیگر

    کیا حال ہوگا جب ابن مریم تم میں نازل ہوگا اور وہ تمہارا امام اور تم میں سے ہی ہوگا۔ یعنی تمہاری ہی

    ففکّر فی قولہٖ منکم وتفکر کمن ا تقٰی ۔ وانّ

    نیست پس فکر کن دریں قول کہ منکم است و ہمچو پرہیزگاراں درو غور نما و ایں حدیث

    قوم سے نہ کسی دوسری قوم سے۔ اس قول میں کہ منکم ہے فکر کر اور پرہیزگاروں کی طرح غور کر اور یہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 101

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 101

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/101/mode/1up


    ھٰذا الحدیث یقص علیکم مابین لکم الفرقان

    ہماں بیان مے کند کہ قرآن شریف بیان فرمودہ است

    حدیث وہی بیان کرتی ہے جو قرآن شریف نے فرمایا ہے۔

    فلا تُفرّقوا بین کتاب اللّٰہ وقول رسولہ المجتبٰی۔

    پس در کتاب خدا و قول رسول خدا تفرقہ نیند ازید

    پس کتاب اللہ اور قول رسول اللہ میں تفرقہ نہ ڈالو۔

    واتقوا اللّٰہ الذی ترجع الیہ کل نفسٍ فتجزٰی۔

    و ازاں خدا بترسید کہ سوئے او واپس خواہید شد و پاداش اعمال خود خواہید یافت

    اور اس خدا سے ڈرو کہ اس کی طرف ایک دن جانا ہے اور اپنے اعمال کی جزا پانی ہے۔

    الا تعلمون ماقال ربکم اعنی قولہٗ 3

    آیا نمے دانید کہ خداوند ما چہ گفتہ است یعنی ایں قول خدا تعالیٰ کہ وعد اللہ الذین

    کیا تم نہیں دیکھتے کہ ہمارے خدا نے کیا فرمایا۔ یعنی یہ کہ وعد اللّٰہ الذین اٰمنوا منکم تا اس کے قول

    3 الٰی قولہٖ3 ۱؂۔

    اٰمنوا منکم تا قول او لا یشرکون بی شیئااست۔ آیا دریں قول غور نمے کنید کہ صاف ہدایت مے فرماید کہ ہمہ خلیفہ ہا از

    لا یشرکون بی شیءًا تک۔ کیا اس فرمودہ میں تم غور نہیں کرتے کہ صاف صاف ہدایت فرماتا ہے کہ تمام خلیفے اسی

    فمالکم تشرکون باللّٰہ عیسٰی والدجال من

    ہمیں امت خواہند بود نہ کہ کسے از آسمان نازل شود۔ چہ شد شمارا کہ حضرت عیسیٰ و دجال را شریک خدا تعالیٰ

    امت میں سے ہونگے نہ کوئی ایک آسمان سے نازل ہوگا۔ تمہیں کیا ہوگیا کہ حضرت عیسیٰ اور دجال کو خدا کا شریک

    غیر علمٍ من اللّٰہ ولا الھدٰی ۔ وتنتظرون

    مے گردانید وبراں ہیچ دلیلے نمے دارید و انتظار مے کنید کہ

    ٹھہراتے ہو کیا اس پر کوئی دلیل رکھتے ہو بلکہ ناحق انتظار کرتے ہو کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 102

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 102

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/102/mode/1up


    ان ینزل علیکم المسیح من السماء وکیف

    مسیح از آسمان نازل شود و چگونہ

    مسیح آسمان سے آوے اور وہ

    ینزل من مات وَاُلْحِق بالموتٰی ۔ أَعِنْدکم حجّۃٌ

    نازل شود در حالیکہ او وفات یافتہ است و باوفات یافتگان پیوستہ۔ آیا نزد شما حجت

    آسمان سے کیونکر آسکتا ہے کہ وہ فوت ہوگیا اور فوت شدوں میں مل گیا۔ کیا تمہارے دعویٰ پر

    قاطعۃٌ علٰی دعواکم فتتبعونھا او اٰثرتم علی

    قاطع بر دعویٰ شما است کہ پیروی او مے کنید یا یقین را ترک کردہ

    کوئی قاطع حجت ہے کہ اس کی پیروی میں سرگرم ہو یا یقین کو ترک کر کے

    الیقین ظنًّا اخفٰی ۔ یاحسرۃً علیکم انکم نسیتم

    گمانے پوشیدہ را اختیار کردہ اید۔ بر شما حسرت است کہ شما قول خدا تعالیٰ

    پوشیدہ گمان کو اختیار کرنے میں دلیر ہو۔ تم پر افسوس کہ تم نے خدا تعالیٰ

    قول اللّٰہ وقول رسولہٖ اعنی منکم وظننتم

    و قول رسول را کہ ۔ منکم ۔۔۔۔۔ است فراموش کردہ اید و گمان مے کنید

    اور اس کے رسول کے قول منکم کو فراموش کردیا اور فضول گمان رکھتے ہو

    ان المسیح یأتی من السمّٰوات العلٰی۔ وھل

    کہ مسیح از آسمان خواہد آمد و

    کہ مسیح آسمان سے آوے گا

    ھو الّا خروجٌ من القراٰن وخروجٌ من الحدیث

    ایں گمان کردن شما از قرآن و حدیث خارج شدن است وازحق خارج شدن

    یہ تمہارا گمان قرآن شریف اور حدیث سے خارج ہونے کی نشانی ہے۔ اور حق سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 103

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 103

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/103/mode/1up


    ومفسدۃٌ عظمٰی۔ وکیف تترکون القراٰن واي

    و مفسدہ عظیمہ است وچگونہ ترک مے کنید قرآن شریف را و کدام

    خارج ہونا مفسدہ عظیمہ ہے۔ تم قرآن کو کیونکر ترک کرتے ہو کیا کوئی

    شھادۃٍ اکبر منہ لمن اھتدٰی ۔ وان للقراٰن

    گواہی بزرگتر از قرآن نزد شما موجودہ است و قرآن را

    بڑی بھاری گواہی قرآن سے زیادہ تمہارے پاس موجود ہے؟ اور قرآن کی وہ

    شانًا اَعْظم من کلّ شان وانہٗ حَکَمٌ ومھیمنٌ

    شانے است بزرگتر از ہر شان واو حکم است یعنی فیصلہ کنندہ و مہمین است یعنی برہمہ

    اعلیٰ شان ہے کہ ہر ایک شان سے بلند ہے اور وہ حکم ہے یعنی فیصلہ کرنیوالا اور وہ مہمین ہے یعنی

    و انہٗ جمع البراھین وبدّد العدا ۔ وانہٗ

    ہدایت ہا احاطہ مے دارد واو جمع کردہ است ہمہ دلائل را وجمعیت دشمناں را پراگندہ نمودہ و آں

    تمام ہدایتوں کا مجموعہ ہے اس نے تمام دلیلیں جمع کردیں اور دشمنوں کی جمعیت کو تتر بتر کر دیا۔ اور وہ ایسی

    کتابٌ فیہ تفصیل کلّ شی ءٍ وفیہ اخبار مایأتی

    کتابے است کہ درو تفصیل ہر چیز است و درو خبر آیندہ

    کتاب ہے کہ اس میں ہر چیز کی تفصیل ہے اور اس میں آئندہ اور

    ومامضٰی ۔ ولایاتیہ الباطل من م بین یدیہ

    وگذشتہ است وباطل را سوئے او راہے نیست نہ از پیش

    گذتہ کی خبریں موجود ہیں اور باطل کو اس کی طرف راہ نہیں ہے نہ آگے سے

    ولا من خلفہٖ وانہٗ نور ربنا الاعلٰی ۔ فاترک

    و نہ از پس و او نور خدائے بزرگ است پس بگذارید

    نہ پیچھے سے اور وہ خدا تعالیٰ کا نور ہے۔ ہریک ایسے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 104

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 104

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/104/mode/1up


    کلّ قصۃٍ تُخَالِفُ قصصہٗ ولا تعص قول ربّک

    ہر قصہ را کہ مخالف قرآن باشد و قول پروردگار خودرا نافرمانی مکنید

    قصہ کو چھوڑ دو جو قرآن کا مخالف ہے۔ اور پروردگار کے فرمودہ کی نافرمانی مت کرو

    فتشقٰی ۔ وتعلم ان نبینا کان مثیل من نودی

    تادر ورطۂ شقاوت نیفتادہ باشید ومی دانید کہ نبی ما صلی اللہ علیہ وسلم مثیل موسیٰ علیہ السلام

    تا شقاوت کے بھنور میں نہ جا پڑو۔ اور تم جانتے ہو کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم مثیل موسیٰ علیہ السلام

    بالواد المقدس طُوٰی ۔ وکانت خلفاء ہٗ کخلفاء ہٖ

    بود وہمہ خلیفہ ہائے او کہ بعد او آمدند ہمچو خلیفہ ہائے

    تھے اور آپ کے تمام خلیفے جو بعد آپ کے آئے آنحضرت

    وکانت السلسلتان متشابھتین فی المدٰی ۔

    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم بودہ اند و ایں ہر دو سلسلہ در مدت باہمہ مشابہت مے دارند

    صلی اللہ علیہ وسلم کے خلیفوں کے مانند تھے اور یہ دونوں سلسلے آپس میں مقدار مدت میں مشابہت رکھتے ہیں۔

    وکذالک قال ربّنا وقد قرء ت فیما مضٰی۔ وتلک

    و ہم چنیں فرمودہ است خدائے ما چنانچہ پیش ازیں خواندہ و ایں

    اور ایسا ہی ہمارے خدا نے فرمایا ہے جیسا کہ تم نے پہلے پڑھ لیا ہے اور یہ

    حقیقۃٌ لا تُسْترولا تُخْفٰی۔ فلا یصدّنک عنھا

    حقیقتے است کہ پوشیدہ نتواں کرد پس ازیں راہ باز نہ دارد شمارا

    ایک حقیقت ہے جس کو پوشیدہ رکھنا اچھا نہیں ہے۔ تمہاری ہوا و ہوس اس سے تم کو

    من اتبع ھواہ وترک الصراط وھویرٰی ۔

    ہوا و ہوس شما و نہ باز دارد آنکس کہ راہ راست را دیدہ و دانستہ ترک کردہ است

    نہ روک دے اور نہ وہ شخص جو کہ دیدہ و دانستہ راہ راست کو ترک کرتا ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 105

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 105

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/105/mode/1up


    وعلمت انّی جئتُ علٰی اجلٍ من سیدی المصطفٰی۔

    ومے دانید کہ من از آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم تا آں مدت آمدہ ام

    اور تم جانتے ہو کہ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے اسی مدت پر آیا ہوں کہ جس میں

    کمثل اجلٍ جاء علیہ من الکلیم ابن الصدیقۃ

    کہ دراں عیسیٰ علیہ السلام بعد از حضرت موسیٰ علیہ السلام آمدہ بودند

    عیسیٰ علیہ السلام موسیٰ علیہ السلام کے بعد آئے تھے۔

    عیسٰی۔ وعلمت انّ خاتم خلفاء ھٰذہ الامۃ من الامۃ

    و دانستہ اید کہ خاتم خلفاء ایں امت ہم ازیں امت است

    اور تم نے جان لیا کہ امت کا خاتم الخلفاء اسی امت میں سے ہے

    لامن فءۃٍ اخرٰی ۔ فکیف تکفربہٖ أَ تکفر

    نہ از گروہے دیگر پس چگونہ انکار آں مے کنید آیا برائے

    نہ دوسرے گروہ میں سے پس کیوں اس کا انکار کرتے ہو؟ کیا پراگندہ اور

    بالقراٰن لِاَقوالٍ شتّٰی ۔ ومن فَکّر فی اٰیۃ

    سخنہائے پراگندہ و بے اصل انکار قرآن شریف مے کنید۔ و ہرکہ فکر کند درآیت لیستخلفنھم

    بے اصل باتوں کے بھروسہ پر قرآن کا انکار کرتے ہو۔ اور جو کوئی فکر کریگا اس آیت میں کہ

    لیستخلفنھم مُلِأَ قلبہٗ یقینًا وایمانًا وترک

    دل او از یقین و ایمان پُر خواہد شد

    لیستخلفنھم ہے اس کا دل یقین اور ایمان سے پر ہو جائے گا اور جو باتیں اس کے برخلاف

    مایُرْوٰی بخلافہٖ و یُحْکٰی ۔ وکُشفت علیہ الحقیقۃ

    ورو ایتہائے بیہودہ و فضول را خواہد گذاشت وبرو حقیقت منکشف خواہد شد

    بیان کی جاتی ہیں ان سب کو چھوڑ دیگا اور اس شخص پر حقیقت منکشف ہو جائے گی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 106

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 106

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/106/mode/1up


    وکَذّب من نطق بخلافہٖ و رویٰ ۔ فویلٌ للذی

    و تکذیب آں کسے خواہد کرد کہ بخلاف ایں روایتے کند پس واویلا ہست بر کسے

    اور اس کی وہ تکذیب کرے گا جو اس کے خلاف میں روایت کریگا۔ اس شخص پر افسوس ہے

    سمع ھٰذہ الدلائل ثم کَذَّب وابٰی ۔ ام

    کہ ایں دلائل را بشنود باز درپأ تکذیب رود چہ ایں کس

    کہ دلائل کو سنے اور پھر تکذیب کے پیچھے پیچھے ہولے۔

    حسب ان اللّٰہ وعد وعدًا ثم اخلفہٗ او

    گمان می کند کہ خدا تعالیٰ وعدہ کردہ باز تخلف وعدہ نمود یا

    کیا یہ گمان کرتا ہے کہ خدا تعالیٰ نے وعدہ کر کے پھر خلاف وعدہ کیا یا

    نسی وعدہٗ کرجلٍ ھوکثیر الذھول ضعیف

    وعدہ خود را ہمچو کسے کہ نسیان برو غالب باشد فراموش کرد

    اپنے وعدہ کو ایسے شخص کی طرح بھول گیا جس پرنسیان غالب ہے

    القُویٰ ۔ سبحان اللّٰہ تقدس وتعالٰی ۔ فبأیّ

    خدا پاک است ازیں بدگمانی ہا پس بہ کدام

    ان بدگمانیوں سے خدا تعالیٰ کی ذات پاک ہے

    حدیثٍ م بعد کتاب اللّٰہ تؤمنون ۔ ا تترکون

    حدیث بعد کتاب اللہ ایمان خواہید آورد آیا یقین را

    قرآن کو چھوڑ کر کس حدیث پر ایمان لاؤ گے۔ کیا یقین کو

    الیقین بشکٍ سرٰی ۔ أَ تؤثرون الظنّ علٰی ما

    ازبہر شکے کہ در دل شما جاگرفتہ است ترک مے کنید آیا ظن را بہ یقین

    شک کے بدلے کہ تمہارے دلوں میں جم گیا ہے ترک کرتے ہو کیا ظن کو یقین کے بدلے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 107

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 107

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/107/mode/1up


    جاء کم من الیقین ومن أَظْلم مِمّن ترک

    اختیار مے کنید وکدام کس از انکس ظالم تر خواہد بود کہ حق را

    اختیار کرتے ہو اس سے زیادہ وہ کون ظالم ہوگا کہ حق کو

    الحق واتبع الھوٰی ۔ أَبقی شک فی خاتم الخلفاء

    ترک کند و پیروی ہوا و ہوس کند آیا باقی ماندہ است شک در خاتم الخلفاء

    ترک کرے اور ہوا و ہوس کی پیروی کرے ۔ کیا اب کوئی شک باقی رہ گیا خاتم الخلفاء میں

    وفی انہٗ منکم فأتوا بالقراٰن ان کان الامرکذا۔

    یا دریں امر کہ آں خاتم الخلفاء از شماست پس قرآن بیارید اگر شک مے دارید

    یا اس امر میں کہ خاتم الخلفاء تم میں سے ہے۔ قرآن کو لاؤ اگر شک رکھتے ہو

    وان الحق قد حصحص فلا تحثوا علیہ التراب

    وحق ظاہر شدہ است پس برو خاک میندازید

    حق ظاہر ہوگیا اس پر خاک نہ ڈالو

    ولا تخفوہ فی الثرٰی ۔ واتقوا اللّٰہ الذی الیہ

    و آں را پوشیدہ مکنید وبترسید ازاں خدائے کہ سوئے او

    اور ہرگز مت چھپاؤ اور خدا تعالیٰ سے جس کی طرف

    ترجعون وحدانًا ۔ وما ارٰی معکم احباب الدنیا۔

    رجوع خواہید کرد و نہ مے بینم باشما دوستان دنیائے شمارا

    جانا ہے ڈرو اور میں نہیں دیکھتا کہ تمہارے دنیا کے دوست تمہاری حمایت کیلئے

    فقوموا فرادیٰ فرادیٰ ولا تنظروا الٰی من احبّ

    پس بایستید یک یک وسوئے دوستی یا دشمنی

    تمہارے ساتھ جائیں گے۔ پس تم ایک ایک ہو کر کھڑے ہو جاؤ اور کسی کی دوستی یا دشمنی کی طرف



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 108

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 108

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/108/mode/1up


    أو عادٰی۔ ثم فکروا بقلبٍ ا تقٰی۔ وعقلٍ اجلٰی۔

    نگاہ مکنید باز بادل پرہیزگار وعقل روشن فکر کنید

    نظر نہ کرو پھر پرہیزگار دل اور عقل روشن لے کر فکر کرو۔

    اَمَا قال ربّکم 3

    آیا خدائے شما نگفتہ است کہ لیستخلفنھم فی الارض کما استخلف الذین من

    کیا تمہارے خدا نے نہیں فرمایا کہ لیستخلفنھم فی الارض کما استخلف الذین من

    3۱؂ و انّ فی ذالک حجۃً علٰی من

    قبلھم و دریں حجتے است برآنکس کہ ازحد

    قبلھم اس میں ایک حجت ہے اس کیلئے کہ جو حد سے

    طغٰی ۔ فان لفظ کما یوجب ان یکون سلسلۃ

    تجاوز مے کند چراکہ لفظ کما کہ دریں آیت موجود است واجب مے کند کہ سلسلہ

    تجاوز کرتا ہے کیونکہ لفظ کما جو اس آیت میں موجود ہے اس امت کے سلسلہ کے خلفاء کو

    الخلفاء فی ھٰذہ الامۃ کمثل سلسلۃ نبی اللّٰہ

    خلفائے ایں امت ہمچو سلسلہ خلفائے موسیٰ علیہ السلام

    موسیٰ علیہ السلام کے خلفاء سے مانند ہونے کو واجب

    موسٰی۔ التی ختمت علی ابن مریم عیسٰی۔

    باشد و ظاہر است کہ سلسلہ خلفائے موسیٰ علیہ السلام بر عیسٰی علیہ السلام ختم شدہ است

    کرتا ہے اور یہ ظاہر ہے کہ سلسلہ خلفاءِ موسیٰ علیہ السلام عیسیٰ علیہ السلام پر ختم ہوگیا ہے۔

    فاین تذھبون من ھٰذہ الاٰیۃ وتبعدون ما

    پس ازیں آیت کجامے روید ونزدیک را دور

    پس اس آیت سے کہا ں رو گردانی کرتے ہو اور نزدیک راہ کو دور ڈالتے ہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 109

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 109

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/109/mode/1up


    دنٰی ۔ وو اللّٰہ لیس فی القراٰن الذی ھو اھل

    مے گردانید و بخدا در قرآن کہ فیصلہ کنندہ ہمہ اختلافہا است

    اور خدا کی قسم قرآن شریف میں جو تمام اختلافوں کا فیصلہ کرنے والا ہے

    الفصل والقضاء الّا خبر ظھور خا تم الخلفاء من

    ہیچ جا ایں ذکر نیست کہ خاتم الخلفاء از سلسلہ موسویہ خواہد آمد

    کہیں ذکر نہیں ہے کہ خاتم الخلفاء سلسلہ محمدیہ کا موسوی سلسلہ سے آئے گا۔

    امۃ خیر الورٰی ۔ فلا تَقْفُوْا ما لیس لکم بہٖ علمٌ و

    پس پیروی آں امر مکنید کہ برو دلیلے نزد شمانیست بلکہ دلیل

    اس کی پیروی مت کرو کہ کوئی دلیل تمہارے پاس نہیں ہے بلکہ بر خلاف

    قد اعطیتم فیہ من الھدٰی۔ ولا تخرجوا من

    برخلاف آں شمارا دادہ شد و از دہانہائے خود

    اس کے تم کو دلیل دی گئی ۔ اور کلمات متفرقہ

    افواھکم کلماتٍ شتّٰی _ التی لیست ھی الّا

    کلمات متفرقہ بروں نیارید کہ آں کلمات جزایں بیش نیستند کہ

    اپنے منہ سے نہ نکالو کہ وہ کلمات اس تیر کی طرح ہیں

    کسھمٍ فی الظلمات یُرْمٰی ۔ وان ھٰذا الوعد

    ہمچو تیرے ہستند کہ در تاریکی راندہ می شود و ایں وعدہ کہ مذکور شد

    جو اندھیرے میں چلایا جائے اور یہ وعدہ جو مذکور ہوا

    وعد حق فلا تغرّنکم ما تسمعون من اَھْلِ الھَوٰی۔

    وعدۂ حق است و شمارا ہیچ کس فریب ندہد۔

    سچا وعدہ ہے اور تم کو کوئی دھوکا نہ دے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 110

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 110

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/110/mode/1up


    وقد اشیر الیہ فی الفاتحۃ مرۃً اخرٰی۔ وتقرء ون

    و در سورہ فاتحہ بار دوم سوئے ایں وعدہ اشارت کردہ شدہ۔ و ایں سورہ فاتحہ

    اور سورہ فاتحہ میں دوسری بار اس وعدہ کی طرف اشارہ فرمایا ہے اور یہ آیت سورہ فاتحہ

    فی الصلٰوۃ صراط الذین انعمت علیھم ثم تستقرون

    یعنی صراط الذین انعمت علیھم در نماز ہائے خود مے خوانید باز حیلہ جوئی را

    یعنی صراط الذین انعمت علیھم اپنی نمازوں میں پڑھتے ہیں۔ پھر حیلہ و بہانہ

    سُبل الانکار وتسّرون النجویٰ ۔ مالکم تدوسون

    اختیار مے کنید دبرائے رفع دفع حجت الٰہی مشورہ ہا مے کنید ۔ چہ شد شمارا کہ

    اختیار کرتے ہیں اور حجت الٰہی کے رفع دفع کیلئے مشورے کرتے ہیں تمہیں کیا ہوگیا کہ

    قول اللّٰہ تحت الاقدام الا تموتون اوتترکون

    قول خدا تعالیٰ را زیر قدمہائے خود پامال مے کنید آیا نخواہید مرد یا ہیچ کس شمارا نخواہد پرسید

    خدا تعالیٰ کے فرمودہ کو اپنے پیروں میں روندتے ہو۔ کیا ایک دن تم نہیں مرو گے یا کوئی تم کو نہیں پوچھے گا

    سدًی ۔ وتذکروننی کما یُذْکَرُ الکفّار وتقولون

    و ذکر من ہمچو ذکر کافراں مے کنید ومے گوئیدکہ

    اور میرا ذکر کافروں کے ذکر کی طرح کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ

    اقتلوہ ان استطعتم وتکتبون الفتوٰی ۔ وما

    اگر توانیداو را قتل کنید و ہم چنیں فتویٰ مے نویسید و

    اگر ہو سکے تو قتل کر دیا جائے اور اسی طرح فتوے لکھتے ہیں اور

    کان لنفسٍ ان تموت الّاباذن اللّٰہ وانّ معی

    ہیچ نفس نمے میرد مگر باذن الٰہی وبامن

    کوئی نفس بجز اذن الٰہی نہیں مرتا اور میرے ساتھ تو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 111

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 111

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/111/mode/1up


    حفظۃً یحفظوننی من العدا ۔فاجمعوا کیدکم

    پاسبانان اوہستند کہ از دشمناں حفاظت من مے کنند ۔ پس ہر مکر کہ دارید جمع کنید

    خدا تعالیٰ کے پاسبان ہیں کہ وہ میری میرے دشمنوں سے حفاظت کرتے ہیں۔ تم ہر ایک تدبیر جمع کر لو اور

    ثم انظروا ھل یسقط الکید الا علٰی من جفا ۔

    بازبہ بینید کہ آں مکر بر کہ افتد آیا برجفا کار یا بر دیگرے

    پھر دیکھو کہ ہر کسی کی تدبیر اسی پرلوٹ کر پڑے گی کہ جو ظالم ہے۔

    وعسٰی ان تحسبوا رجلًا کاذبًا وھوصادقٌ

    وممکن است کہ شما کسے را دروغگو خیال کنید واو در دعوی خود صادق باشد

    اور ممکن ہے کہ تم کسی کو دروغگو خیال کرو اور وہ اپنے دعویٰ میں صادق نکلے

    فیما ادعٰی ۔فلا تمیلوا کل المیل ومن ترک

    پس از حق بکلی دور نشوید وہرکہ تقوی را

    پس حق سے بالکل دور نہ ہو جاؤ جس نے تقویٰ کو

    التقوٰی فقد ھوٰی ۔ أ رأ یتم ان کنتُ من عنداللّٰہ

    ترک کرد پس بیفتاد آیا نمے بینید کہ اگر من از طرف

    ترک کیا وہ گر گیا تم نہیں دیکھتے کہ اگر میں خدا تعالیٰ کی طرف سے

    وقد کذبتم فما بال من اعتدٰی ۔ و

    خدا تعالیٰ ہستم وشما تکذیب من کردہ اید پس حال آنکس چہ خواہد شد کہ از حد تجاوز کرد

    ہوں اور تم مجھے جھٹلاتے ہو پس اس شخص کا کیا حال ہوگا جو حد سے بڑھ گیا

    انتم تکرھون ان یموت عبد اللّٰہ عیسٰی ۔

    و شمارا خوش نمے آید کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام فوت شوند

    تم کو اچھا معلوم نہیں ہوتا کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام فوت ہو جائیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 112

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 112

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/112/mode/1up


    ولا نفع لکم فی حیٰوتہٖ وللّٰہ فی موتہٖ مآرب عظمٰی ۔

    و در زندگی اوشاں شمارا ہیچ نفع نیست و برائے خدا در موت ایشاں مقاصد عظیمہ ہستند

    اور ان کی زندگی میں تمہارا کچھ نفع نہیں ہے۔ مگر خدا کے لئے ان کی موت میں بڑے بڑے مقصد ہیں۔

    أَلہٗ شرکۃٌ فی السّماء مع ربّنا فلا یبرح مقامہٗ

    آیا حضرت عیسیٰ علیہ السلام را در سکونت آسمان با خدا تعالیٰ شرکت است پس ازیں وجہ آسمان را

    کیا عیسیٰ علیہ السلام کا آسمان میں سکونت رکھنا خدا تعالیٰ کے ساتھ شرکت ہے جو اس وجہ سے آسمان کو

    ولا یتدلّٰی۔ فلا تحاربوا اللّٰہ بجھلکم وصلّوا علٰی

    نمی گذاردو از آنجانقل مکان نمے کند۔ پس باخدا از جہل خود جنگ مکنید وبر پیغمبر خود

    نہیں چھوڑتے اور اس جگہ سے نقل مکان نہیں کرتے پس اپنی جہالت سے خدا کے ساتھ جنگ مت کرو اور خدا کے رسول

    نبیکم المصطفٰی ۔ وھو الوصلۃ بین اللّٰہ وخلقہٖ

    صلی اللہ علیہ وسلم درود بفرستید و ہماں وسیلہ است در خدا و مخلوق او

    صلی اللہ علیہ وسلم پر درود بھیجو کہ وہ خدا اور مخلوق میں وسیلہ ہیں۔

    وقاب قوسین او ادنٰی ۔ اسمعتم منی مالا

    ودریں ہر دو قوس ربوبیّت و عبودیّت وجود او واقع شدہ۔ آیا شنیدہ آید از من چیزے کہ

    اور ان دونوں قوس الوہیت اور عبودیت میں آپ کا وجود واقع ہے۔ آیا مجھ سے کبھی کوئی ایسی بات سنی ہے

    اسمعکم القراٰن او رأیتم عیسٰی فی السماء

    قرآن آں را نشنوانیدہ است یا عیسٰی علیہ السلام را دیدہ اید در آسمان نشستہ

    جو قرآن نے نہیں سنائی یا عیسٰی علیہ السلام کو آسمان میں دیکھ لیا ہے

    فکبر علیکم ان تُکَذِّبوا اعینکم اوظننتم ظنًّا

    پس شمارا گران آمد کہ آنچہ بچشم خود دیدہ اید انکار آں کنید یا ایں گمانے محض است

    جوتم کو گراں معلوم ہوتا ہے کہ جو کچھ اپنی آنکھ سے دیکھ لیا ہے اس کا انکار کرو۔ یا یہ محض گمان ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 113

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 113

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/113/mode/1up


    وان الظن لا یغنی من الحقّ شیءًا ۔وقد علمتم

    وظاہر است کہ محض گمان کردن قائم مقام یقین نمے شود و بہ تحقیق دانستہ اید

    اور یہ ظاہر ہے کہ محض گمان قائم مقام یقین کے نہیں ہوتا اور بہ تحقیق تم نے جان لیا

    ان القراٰن اھلکہٗ وتوفّٰی ۔ فبأیّ حدیثٍ تؤمنون

    کہ قرآن عیسیٰ علیہ السلام را وفات دادہ است پس بعد از قرآن بکدام حدیث

    کہ قرآن نے عیسیٰ علیہ السلام کو وفات دیدی ہے اب بعد قرآن کے کس حدیث پر

    بعدہٗ وتکفرون بما انزل اللّٰہ واوحٰی ۔ا تترکون

    ایمان خواہید آورد آیا برائے حدیث انکار قرآن خواہید کرد کہ از خدا تعالیٰ نازل شدہ است۔ آیا

    ایمان لاؤ گے آیا حدیث کیلئے قرآن کا انکار کروگے کہ جو خدا تعالیٰ کی طرف سے نازل ہوا ہے۔ کیا

    الیقین لظنٍ اھلک قبلکم قومًا و اردٰی ۔ یا

    برائے گمانے کہ قوم یہود را پیش از شما ہلاک کرد یقین را ترک خواہید کرد؟

    اس گمان کے لئے جس نے تم سے پہلی قوم یہود کو ہلاک کیا یقین کو ترک کرو گے؟

    حسرۃ علی الذین یقولون انا نحن العلماء ۔

    کمال حسرت برعالمان ایں وقت است

    اس وقت کے علماء پر بڑا افسوس ہے

    انھم ما صاروا من انصاری بل صاروا اوّل

    کہ او شاں انصار من نشدہ اند بلکہ پیش از ہمہ

    کہ وہ میرے مددگار نہ ہوئے بلکہ سب سے پہلے

    من اٰذٰی ۔ لیتمّوا نَبْأَ الرسول بِاَلْسنھم

    مرا ایذا دادند تاکہ آں خبر را بز بانہائے خود با تمام رسانند

    مجھے تکلیف دی تاکہ اس پیشگوئی کو اپنے مونہہ سے پورا کریں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 114

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 114

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/114/mode/1up


    وما روی عن خیر الوریٰ ۔ وقال اظلمھم اقتلوا

    کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرمودہ بود و شخصے کہ ظالم تر ازہمہ بود او بہ نسبت من گفت

    جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کی تھی اور ایک شخص جو سب سے بڑا ظالم تھا اس نے

    ھٰذا الرجل انّی اخاف اَنْ یُّبدل دینکم او

    کہ ایں شخص رابکشید کہ من مے ترسم کہ در دین شما خلل اندازد و ازو در

    میری نسبت کہا کہ اس شخص کو قتل کرو کہ میں ڈرتا ہوں کہ تمہارے دین میں خلل ڈالے گا اور اس سے

    یحطکم اذا علا ۔ یااھل الحسد والھوٰی ۔ویلکم

    وجاہت ہائے شما فرق آید ۔ اے اہل حسد وہویٰ برشما واویلا است

    تمہاری وجاہت و عزت میں فرق آجائے گا۔ اے حاسدو! تم پر افسوس ہے کہ تم

    لم تؤثرون ھٰذہ الحیٰوۃ الدنیا ۔ وان القراٰن

    آیا ایں ادنیٰ زندگی دنیا را اختیار مے کنید و بہ تحقیق قرآن

    اس ذراسی دنیا کی زندگی کو اختیار کرتے ہو اور واقعی قرآن نے

    یشھد انّ خاتم خلفاء ھٰذہ الامّۃ رجلٌ

    گواہی دادہ است کہ خاتم الخلفاء ایں امت از ہمیں امت است۔

    گواہی دی ہے کہ اس امت کا خاتم الخلفاء اسی امت میں سے ہے

    من الاُمّۃ وان المسیح من الموتٰی ۔ ومن

    و حضرت مسیح علیہ السلام وفات یافتہ اند و ازاں شخص

    اور حضرت مسیح علیہ السلام وفات پاگئے ہیں اور اس شخص سے

    اظلم ممن الذی عصی القراٰن وابٰی ۔ وھو

    ظالم تر کیست کہ نافرمانی قرآن کرد و سرباز زد و ہماں

    زیادہ ظالم کون ہے کہ قرآن کی نافرمانی کر کے روگردانی کرے حالانکہ وہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 115

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 115

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/115/mode/1up


    الحَکَمُ من اللّٰہ ولاحُکم الّا حکمہ الاجلٰی ۔ اولم

    فیصلہ کنندہ از خدا تعالیٰ است وحکم حکم اوست آیا

    خدا کی طرف سے فیصلہ کرنے والا ہے اور اسی کا حکم حکم ہے کیا

    تکفکم اٰیۃ فلمّا توفّیتنی اوعندکم صحفٌ

    کفایت نمے کند شمارا آیت فلما توفیتنی یا نزد شما دیگر نسخہائے قرآن

    آیت فلما توفیتنی تم کو کفایت نہیں کرتی یا تمہارے پاس اور قرآن ہیں

    اخرٰی ۔ وان سورۃ النّور تکذبکم والفاتحۃ

    موجود ہستند و بہ تحقیق سورۃ نور تکذیب شما مے کند و سورہ فاتحہ

    اور سچ یہ ہے کہ سورہ نور تمہیں جھٹلاتی ہے اور سورہ فاتحہ

    تفتح علیکم باب الھدٰی ۔ فان اللّٰہ بدء فیھا

    برشما راہ ہدایت مے کشاید چنانچہ خدا تعالیٰ در سورۃ فاتحہ

    تمہارے لئے ہدایت کی راہ کھولتی ہے چنانچہ خدا تعالیٰ نے اس میں

    من المبدء وجعل اٰخر الازمنۃ زمن الضالین

    از مبدء عالم ابتدا کردہ است و سلسلہ ایں دنیا را بر زمانہ ضالین ختم کردہ

    مبدء عالم سے ابتدا کیا ہے اور دنیا کے اس سلسلہ کوضالین کے زمانہ پر ختم کیا ہے

    وانھم ھم النصارٰی ۔کما جاء من نبیّنا المجتبٰی۔

    و آں گروہ نصاریٰ است چنانچہ در احادیث آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم آمدہ است

    اور وہ نصاریٰ کا گروہ ہے چنانچہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث صحیحہ میں آیا ہے

    فاین فیھا ذکر دجّالکم فاَروناہ من القراٰن

    پس کجاست ذکر دجال شما در سورۃ فاتحہ پس بنمائید مارا از قرآن

    اب بتاؤ تمہارے دجال کا ذکر سورۃ فاتحہ میں کہاں ہے اگر ہو تو قرآن میں ہمیں دکھلاؤ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 116

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 116

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/116/mode/1up


    وقد ھلک من ترک و القراٰن وعادٰی اھلہٗ

    و بہ تحقیق ہلاک شد کسے کہ قرآن را ترک کرد وہر کہ خدمت قرآن مے کند او را

    جس نے قرآن کو ترک کیا اور ان کو دشمن پکڑا جو قرآن کے خادم ہیں وہ ہلاک ہوگیا

    وقلٰی ۔ أَنسی الخبیر العلیم ماحفظتموہ

    دشمن گرفت آیا خدائے علیم و خبیر فراموش کرد آنچہ شما یاد داشتہ آید

    کیا خدائے علیم و خبیر نے بھلا دیا جو تم نے یاد کر رکھا ہے

    او افتریتم علٰی کتاب اللّٰہ ومن اظلم ممّن

    یا بر کتاب الٰہی افترا مے کنید واز مفتری کدام کس ظالم تر

    یا خدا کی کتاب پر افترا کرتے ہو اور مفتری سے زیادہ ظالم کون ہے

    افترٰی ۔ وانّہٗ لقولٌ فصلٌ لاغبار علیہ وانّہٗ

    است و بہ تحقیق قرآن قولے است فیصلہ کنندہ ہیچ غبارے برونیست و

    اور تحقیق قرآن ایک فیصلہ کرنے والا قول ہے کوئی غبار اس پر نہیں ہے

    لبیانٌ اظھر و اجلٰی ۔ وان ھٰذا لھو الحق و

    آں بیانے است ظاہر تر و روشن تر و بہ تحقیق ہمیں حق است و

    اور وہ روشن اور ظاہر بیان ہے اور سچ یہی ہے

    من اصدق من اللّٰہ قیلًا ۔ ومن اعلم من

    از خدا زیادہ تر راست گو کدام شخص است وزیادہ تر دانندہ از و کیست

    خدا سے زیادہ سچا اور اس سے زیادہ جاننے والا کون ہے۔

    ربّنا الاعلٰی ۔ ام عندکم حجۃٌ تمنعکم من

    آیا نزد شما حجتے است کہ از پیروی قرآن شما را

    کیا تمہارے پاس کوئی حجت ہے کہ قرآن کی پیروی سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 117

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 117

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/117/mode/1up


    القراٰن فأتوا بھا ان کنتم تتقون اللّٰہ ولا

    منع می کند پس آں حجت مارا بنمائید اگر از خدا مے ترسید و پیروی

    روکتی ہے وہ حجت ہم کو دکھلاؤ اگر خدا سے ڈرتے ہو اور

    تتبعون الھوٰی ۔ وتعلمون ان الفاتحۃ اُمّ

    حرص و ہوا نمے کنید ۔ نمی دانید کہ سورہ فاتحہ ام الکتاب

    حرص و ہوا کی پیروی نہیں کرتے ہو۔ تم جانتے ہو کہ سورہ فاتحہ ام القرآن

    الکتاب وانھا تنطق بالحق وفیھا ذکر اخیار

    است و ہرچہ حق است ہماں مے فرماید و درو ذکر آں نیکاں است

    ہے جو کچھ حق ہے وہی فرماتی ہے اور اس میں ان نیکوں کا ذکر ہے

    اُمّۃٍ خلت من قبل وذکر شرھم الذین غضب

    کہ پیش از مسلماناں گذشتہ اند و ذکر آں بداں نیزہست کہ پیش از مسلماناں

    کہ مسلمانوں سے پہلے گذرے ہیں اور ان بدوں کا بھی ذکر ہے کہ مسلمانوں سے

    اللّٰہ علیھم فی ھٰذہ الدنیا ۔وذکر الذین اختتمت

    بودند و خدا برایشاں غضب کرد وذکر آناں نیز ہست کہ بر ایشاں

    پہلے ہوئے ہیں اور خدا نے ان پر غضب کیا اور ان کا بھی ذکر ہے کہ جن پر

    علیھم ھٰذہ السورۃ اعنی الضالّین ۔ وقد

    ایں سورہ ختم کردہ شد یعنی فرقہ ضالین وشما

    اس سورۃ کو ختم کیا گیا ہے یعنی فرقہ ضالین اور تم

    اقررتم بانّھم النصارٰی ۔ واَخّرَ اللّٰہ ذکرھم

    اقرار دارید کہ آں فرقہ ضالین نصاریٰ ہستند و خدا از ہمہ ذکر او شاں در آخر

    اقرار کرتے ہو کہ وہ فرقہ ضالین نصاریٰ ہی ہیں اور خدا نے سب سے بعد اس سورۃ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 118

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 118

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/118/mode/1up


    فی ھٰذہ السورۃ لیعلم ان فتنتھم اٰخر الفتن

    ایں سورہ آورد تاکہ دانستہ شود کہ فتنہ نصاریٰ آخر ہمہ فتنہا است

    کے آخر میں انکا ذکر کیا ہے تاکہ جان لو کہ نصاریٰ کا فتنہ تمام فتنوں کے پیچھے ہے

    فلم یبق لدجّالکم موضع قدمٍ یا اولی النّھٰی ۔

    پس برائے دجّال شما جائے قدم نہادن نماندہ است

    پس تمہارے دجّال کے لئے قدم رکھنے کی جگہ نہیں رہی۔

    وا ؔ ن ھٰذہٖ فرقٌ ثلٰثٌ من اھل الکتٰب وکذالک

    و ایں سہ فرقہ اند از اہل کتاب وہم چنیں

    اور یہ تین فرقے ہیں اہل کتاب کے اور اسی طرح

    منکم ثلٰثٌ شابہ بعضکم بعضھم وضاھا ۔

    سہ فرقہ اند از شما کہ بعض بعض را مشابہ افتادہ

    تم میں بھی تین فرقے ہیں کہ بعض بعض کے مشابہ ہوگئے۔

    وحث اللّٰہ للمؤمنین علٰی ھٰذا الدعاء ثم

    و رغبت دادہ است خدا تعالیٰ مومناں را بر ایں دعا بعد ازاں

    اور اس دعا پر خدا نے مومنوں کو رغبت دلائی ہے اور اس کے بعد

    وعد فی سورۃ النور وعدًا انہٗ لیستخلفنّ

    وعدہ دادہ است در سورہ نور کہ او از مسلماناں خلیفہ

    سورہ نور میں وعدہ دیا ہے کہ مسلمانوں میں سے خلیفے مقرر کرے گا

    قومًا منھم کمثل الذین استُخْلِفُوْا من قَبْلُ

    خواہد فرستاد ہمچو آں خلیفہ ہائے کہ پیش ازیشاں گذشتہ اند

    ان خلیفوں کی طرح جو ان سے پہلے ہوئے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 119

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 119

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/119/mode/1up


    لیبشر المؤمنین انّ الدعاء اجیب لبعضھم

    تاکہ مومناں را بشارت دہد کہ دعائے ایشاں مستجاب است

    تاکہ مومنوں کو بشارت دے کہ ان کی دعا قبول ہوئی۔

    من الحضرۃ العلیا ۔ فایّ بیانٍ اظھر من ھٰذا

    پس کدام بیان ازیں

    اب کونسا بیان اس

    البیان یا اولی النھٰی ۔ افشقّ علیکم ان یجيء

    بیان روشن تر خواہد بود آیا برشما گران آمدہ است کہ

    بیان سے زیادہ روشن ہوگا۔ کیا یہ بات تمہیں بُری معلوم ہوتی ہے کہ

    مسیحکم منکم او اردتم ان تکذبوا وعد

    مسیح شما ہم از درمیان شما بیاید یا مے خواہید کہ تکذیب کلام خدا کنید

    تمہارا مسیح تم میں سے ہی ہووے یا چاہتے ہو کہ خدا کے کلام کو جھٹلاؤ۔

    المولٰی ۔ یاقوم انما فتنتم من ربّکم فلا تنقلوا

    اے قوم من دریں امتحان شما است از خدائے شما پس

    اے میری قوم خدا کی طرف سے اس میں تمہارا امتحان ہے اب

    الی الخطیات الخُطا ۔ وما قص علیکم اللّٰہ من

    قدمہائے خود سوئے خطاہا مبرید و خدا تعالیٰ خبرے عیسیٰ علیہ السلام

    خطا کی طرف قدم مت اٹھاؤ خدا نے کوئی خبر عیسیٰ علیہ السلام کی

    نبأ عیسٰی ۔ الّا لیبشر ان مسیحًایأتی منکم

    شمارا ندادہ است مگر بہمیں غرض کہ از شما نیز ہم مسیح خواہد آمد

    تم کو نہیں دی ہے۔ مگر اس غرض سے کہ تم میں سے بھی ایک مسیح



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 120

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 120

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/120/mode/1up


    کمثل مسیح بنی اسراء یل فابشروا بظھور

    ہمچو مسیح بنی اسرائیل پس بہ ظہور وعدہ خدا

    مسیح بنی اسرائیل کی مانند ضرور آئیگا پس خدا کے وعدہ پر

    الوعد ولا تختصموا کالذی اعرض وتولٰی۔

    خوش شوید وہمچو کسے خصومت مکنید کہ او اعراض مے کند و رومے گرداند

    خوش ہو جاؤ اس شخص کی طرح خصومت نہ کرو کہ جو اعراض کرتا اور رو گردانی

    وقَد علمتم ان عیسٰی قد جاء فی اٰخر زمن

    و بہ تحقیق دانستہ اید کہ عیسٰی علیہ السلام درآخر زمانہ یہود آمدہ بود

    کرتا ہے اور تم جانتے ہو کہ عیسیٰ علیہ السلام آخر زمانہ میں یہود کے آئے تھے

    الیھود وکذالک قدّر اللّٰہ لمسیحکم اجلًا مُسَمًّی۔

    و ہم چنیں خدا تعالیٰ برائے مسیح شما زمانہ مقرر کرد کہ مشابہ زمانہ مسیح بنی اسرائیل بود

    اسی طرح خدا تعالیٰ نے تمہارے مسیح کے لئے زمانہ مقرر کیا جو مسیح بنی اسرائیل کے

    لیتم المشابھۃ بینکم وبین الذین خلوا من

    تاکہ آں مشابہت باتمام رسد کہ ایں امت را بامت بنی اسرائیل است

    زمانہ کے مشابہ تھا تاکہ وہ مشابہت پوری ہو جو اس امت کو اسرائیلی امت سے ہے۔

    قبل فمالکم تَسْلکون غیر طریقٍ سلکہ اللّٰہ

    پس چہ شد شمارا کہ آں طریق اختیار مے کنید کہ آں مخالف طریق خدا تعالیٰ است

    تمہیں کیا ہوگیا جو تم اس طریق کو اختیار کرتے ہو کہ وہ مخالف طریق خدا ہے

    وتنسون امرًا ارادہ اللّٰہ وقضٰی ۔ و اِنّ

    و آں امر را فراموش مے کنید کہ خدا تعالیٰ ارادہ آں فرمودہ است و بہ تحقیق

    اور اس امر کو فراموش کرتے ہو جس کا خدا تعالیٰ نے ارادہ فرمایا ہے۔ تحقیق



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 121

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 121

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/121/mode/1up


    زماننا ھٰذا ھو اٰخرالازمنۃ کما کان لبنی اسرائیل

    ایں زمانہ ما زمانہ آخری است ہمچو آں زمانہ کہ زمانہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام بود

    یہ ہمارا زمانہ آخری زمانہ ہے اس زمانے کی طرح جو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا

    زمان عیسٰی۔ وان عیسٰی کان علمًا لساعۃ الیھود

    کہ برائے بنی اسرائیل زمانہ آخری بود وبہ تحقیق عیسیٰ علیہ السلام برائے ساعت تباہی یہود دلیلے بود

    بنی اسرائیل کے لئے آخری زمانہ تھا۔ بتحقیق حضرت عیسیٰ علیہ السلام یہودیوں کی تباہی کی گھڑی

    و انا علمٌ للساعۃ التی تحشر الناس فیھا و

    و برائے قیامت دلیلے ہستم

    کے لئے ایک دلیل تھے اور میں قیامت کیلئے ایک دلیل ہوں

    تُحیٰی کل نفسٍ لتجزٰی ۔ وقد ظھر اکثر

    واکثر علامات ایں زمانہ

    اور بہت سے اس زمانہ کے علامات

    علاماتھا وذکرھا القراٰن ذکرًا ۔ وعُطّلت

    در قرآن شریف مرقوم شدہ اند وشتر مادہ ہا

    قرآن شریف میں مرقوم ہیں اور اونٹنیاں

    العشار ونُشرت الصحف والاسفار وجُمع

    معطل گردیدہ وکتاب ہائے بسیار در بسیار شائع شدہ و

    بیکار ہوگئیں اور کتابیں بے شمار شائع ہوئیں۔ اور

    القمر والشمس فی رمضان وفُجّرت البحار

    ماہ و مہر در رمضان کسوف گرفتہ و نہرہا جاری شدہ

    چاند سورج کو رمضان میں گرہن لگا اور نہریں جاری ہوئیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 122

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 122

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/122/mode/1up


    وفتحت الطرق وزُوّجت بنفوسکم نفوس

    و راہ ہاکشادہ و پر امن گشتہ و مردم ہائے ولایت ہا باہم متلاقی گشتہ

    اور راستے کھل گئے اور ولایتوں کے لوگ آپس میں

    بلادٍ قصوٰی ۔ وان الجبال نُسفت اکثرھا

    و کوہ ہا از جا ہائے خود کندہ شدہ

    ملنے لگے اور پہاڑ اپنی جگہ سے ہل گئے کہ

    فما ترون فیھا عوجًا ولا امتًا ۔ وتُرِکت القلاص

    پس ہیچ کجی وبلندی نماندہ و شترہا از سواری

    کوئی اونچائی نچائی باقی نہ رہی اور اونٹ سواری

    فلا یحمل علیھا ولا یُسعٰی ۔ فثبت ان زماننا

    و بار برداری متروک شدہ پس ثابت شد کہ ایں زمانۂ ما

    اور بار برداری سے متروک ہوگئے۔ اس سے ثابت ہوگیا کہ یہ زمانہ

    ھٰذا ھو اٰخر الازمنۃ التی ذکرت فی القراٰن ط

    ہماں آخری زمانہ است کہ ذکر آں در قرآن است

    وہی آخری زمانہ ہے کہ جس کا ذکر قرآن میں ہے

    وتَعَیَّنَ ان ھٰذا الوقت ھووقت اٰخر الخلفاء

    و متعین شد کہ ایں وقت ہماں وقت است کہ در او خاتم خلفاء

    اور مقرر ہوگیا کہ یہ وقت وہی وقت ہے کہ جس میں خاتم خلفاء

    لِاُمّۃ نبیّنا خیرالورٰی ۔ وقد بلغ الثبوت کمالہٗ

    مبعوث شدن ضروری بود وبہ تحقیق ثبوت ایں امر بکمال خود رسیدہ

    کا مبعوث ہونا ضروری تھا اور اس امر کا ثبوت اپنے کمال کو پہنچ گیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 123

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 123

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/123/mode/1up


    وماغادر اللّٰہ شکًا ولاریبًا ۔ وانا مُلئنا فیہ

    و خدا تعالیٰ ہیچ شک را درمیان نہ گذاشتہ وما دریں امر

    اور خدا تعالیٰ نے کوئی شک اس میں باقی نہ رکھا اور ہم

    معرفۃً وعلمًا تامًا و نورًا مُبینًا ۔ حتّٰی لورفع

    آنقدر معرفت دادہ شدہ ایم کہ اگر پردہ از درمیان خیزد

    اس امر میں اس قدر معرفت دیئے گئے ہیں کہ اگر درمیان سے

    الحجاب لما ازددنا یقینًا ۔ أَ ترون من دونی

    یقین ما زیادہ نشود آیا می بینید دریں زمانہ

    پردہ اٹھ جائے تو ہمارا یقین زیادہ نہیں ہوتا۔ آیا میرے سوا کسی شخص کو

    فی ھٰذا الاَوَانِ رجلًا یقول انی انا المسیح الموعود

    بجز من شخصے را کہ بگوید کہ من مسیح موعود ہستم

    اس زمانہ میں دیکھتے ہو جو کہے کہ میں مسیح موعود ہوں

    ویأتی کمثلی باٰیاتٍ کبرٰی ۔ فمالکم لا تقبلون

    وہمچو من نشان ہائے بزرگ آوردہ باشد پس چہ شد شمارا آنکس را

    اور میری طرح بڑے بڑے نشان لایا ہو۔ تمہیں کیا ہوگیا جو تم اس کو قبول

    من جاء کم علٰی وقتہٖ واراکم من الاٰیات ما

    قبول نمے کنید کہ بر وقت خود آمد و نشان ہا بنمود

    نہیں کرتے کہ عین اپنے وقت پر آیا اور بہت سے نشان دکھلائے

    ارٰی ۔ وقدجاء علٰی اجلٍ بعد نبیّہ المصطفٰی ۔

    وبہ تحقیق در وقتے آمدہ است کہ آں وقت آں زمانہ را

    اور اس وقت آیا کہ وہ اس زمانہ کا مشابہ ہے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 124

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 124

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/124/mode/1up


    کمثل اجلٍ بعث المسیح فیہ بعد موسٰی ۔ وقد

    مشابہ است کہ دراں زمانہ حضرت عیسٰی علیہ السلام بعد از موسیٰ علیہ السلام آمدہ بودند و من

    جس زمانہ میں حضرت عیسیٰ علیہ السلام بعد موسیٰ علیہ السلام آئے تھے اور

    ذکرت غیر مرۃٍ یا اولی النھٰی ۔ انی انا المسیح الذی

    بارہا ذکر کردہ ام کہ من ہماں مسیح ہستم کہ

    میں نے بار بار ذکر کیا ہے کہ میں وہی مسیح ہوں کہ

    کان ناز لًا من الحضرۃ العلیا ۔ وکنت قدر

    ظہور او

    جس کا ظہور

    ظھوری فی اٰخر السلسلۃ المحمدیۃ کمثل

    در آخر سلسلہ محمدیہ مقدر بود ہمچو آں

    آخری سلسلہ محمدیہ میں مقدر تھا اس مسیح کی طرح

    المسیح الذی جاء فی اٰخر السلسلۃ الموسویۃ

    مسیحے کہ در آخر سلسلۂ موسویہ آمدہ بود

    کہ موسوی سلسلہ کے آخر میں آیا تھا

    باذن المولٰی ۔ لیتساوی السلسلتان ویتم

    تاکہ ہر دو سلسلہ برابر شوند و وعدہ الٰہی

    تاکہ دونوں سلسلے برابر ہو جائیں اور وعدہ الٰہی

    الوعد والکریم اذا وعد وفا ۔ فالحمد للّٰہ

    باتمام رسد پس ستائش مر

    پورا ہو جائے پس ساری خوبیاں خدا تعالیٰ کے لئے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 125

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 125

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/125/mode/1up


    الذی مابخس ھٰذہ الامۃ حقھا وما نقصھم

    خدائے راست کہ حق ایں امت را ہیچ کم نہ کردہ است

    کہ اس امت کے حق کو کم نہیں کیا

    قدرًا ۔ وأری الامر کتطابق النعل بالنعل فما

    وامر مشابہت را ہمچو مطابقت نعل بالنعل بنمود پس

    اور امر مشابہت کو نعل بہ نعل مطابقت میں پورا اتارا پس

    ترٰی ظلمًا ولا ھضمًا ۔ فلا تکفر بما ثبت

    ہیچ ظلم و کمی بیشی مشاہدہ نمے کنی پس انکار چیزے مکن کہ

    تو کوئی ظلم اور کمی بیشی کو نہیں دیکھتا پس اس چیز کا انکار مت کر کہ

    من القراٰن وقل ربّ زدنی علمًا ۔ ومالک

    از قرآن ثابت است و بگوکہ اے خدا علم من زیادہ کن وترا چہ شد

    جو قرآن شریف سے ثابت ہے اور دعا کر کہ اے خدا میرا علم زیادہ کر اور تجھے کیا ہوگیا

    لا تتبع ماقال اللّٰہ وتتبع اقوالًا اخرٰی ۔

    کہ پیروی کلام خدا نمے کنی وپس اقوال دیگر مے روی

    ہے کہ تو کلام خدا کی پیروی نہیں کرتا اور دوسرے اقوال کے پیچھے ہولیا ہے

    وان ھدی اللّٰہ ھو الھدٰی ۔ واللّٰہ صدقکم

    و ہدایت ہماں ہدایت است کہ از خدا باشد وخدا وعدۂ خود صادق

    اور ہدایت وہی ہدایت ہے جو خدا کی طرف سے ہے۔ خدا نے اپنا وعدہ سچاکیا

    الوعد فاین تذھبون من وعدہٖ وتنحتون

    کرد پس از وعدۂ خدا کجا میروید

    اب خدا کے سچے وعدہ سے کہاں بھاگتے ہو۔ اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 126

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 126

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/126/mode/1up


    قصصًا شتّٰی ۔ وايّ فائدۃٍ لکم فی حیات المسیح

    و دیگر قصصہا مے تراشید وشما ر ا در زندگی مسیح علیہ السلام بجزایں کدام فائدہ

    جھوٹے قصے تراشتے ہو اور مسیح علیہ السلام کی زندگی میں تم کو بجز اس کے کیا

    ایھا النوکٰی ۔ من غیر انکم تنصرون بہ النصارٰی ۔

    است کہ پادریان را مددے دہید

    فائدہ ہے کہ پادریوں کو مدد دیتے ہو

    افلا تنظرون الی الزمان وقد نزلت علیکم

    و سوئے زمانہ نظر نمے کنید

    اور زمانہ کی طرف نہیں نظر کرتے ہو

    بلیۃٌ عظمٰی ۔ وتنصّرفوجٌ من قومکم واحبّاء کم

    و نہ مے بینید کہ چہ قدر مسلماناں نصرانی شدہ اند

    اور نہیں دیکھتے ہو کہ کس قدر مسلمان نصرانی ہوگئے

    وھلکت البلاد والعباد۔ واھتزّعرش الرحمٰن

    وچہ قدر بندگان خدا ہلاک گردیدہ و بلائے عظیم فرود آمدہ

    اور کس قدر خدا کے بندے ہلاک ہوگئے۔ خدا کے بندوں پربڑی بلا اتری

    لما نزل فقضٰی ما قضٰی ۔ ولو اراد اللّٰہ اَن

    واگر خدا ہمیں ارادہ داشتے کہ

    اگر خدا کا یہی ارادہ ہوتاکہ

    ینزل احدًا من السَّمآء کما زعمتم لکان خیرًا لکم

    کسے را از آسمان فرود آرد چنانکہ گمان شماست البتہ بہتر بود

    کسی کو آسمان سے اتارتا جیسا کہ تمہارا گمان ہے تو بہتر یہ تھا کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 127

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 127

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/127/mode/1up


    ان ینزل نبیّکم المصطفٰی ۔ اما قرء تم قولہٗ تعالٰی

    کہ نبی ماصلے علیہ اللہ علیہ وسلم را فرود آوردے آیا نخواندی قول خدا تعالیٰ را کہ فرمودہ است

    ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو آسمان سے اتارتا۔ خدا نے جو فرمایا تم نے اب تک نہیں پڑھا

    لواردنا ان نتّخذ لھوًا لا تخذناہ من لدنا یعنی

    کہ اگر مالہوے یعنی پسرے می گرفتیم ہر آئینہ مے گرفتیم نزد خود یعنی

    کہ اگر ہم بیٹا بناتے تو اپنے پاس سے بیٹا بناتے یعنی

    محمّدًا فانظروا نظرًا ۔ ان السَّمٰوات والارض

    محمد صلی اللہ علیہ وسلم را پس دریں آیت تدبّر کن آسمان و زمین

    محمد صلے اللہ علیہ وسلم کو۔ اس آیت میں تدبّرکرو۔ زمین وآسمان

    کانتا رتقًا فَفُتِقَتَا فی ھٰذا الزمان لیبتلی

    ہر دو بستہ بودند پس دریں زمانہ ہر دو را بکشادند تا

    دونوں بند تھے اس زمانہ میں دونوں کھل گئے تاک ہ

    الصالحون والطالحون وکلٌّ بما عمل یجزٰی۔

    نیکاں و بداں را امتحان کردہ آید و ہر گروہے حسب اعمال خود پاداش یابد

    نیکوں اور بدوں کا امتحان ہو جائے اور ہر ایک گروہ اپنے اعمال کی جزا سزا پاوے

    فاخرج اللّٰہ من الارض ماکان من الارض

    پس خدا تعالیٰ از زمین چیزہائے زمین را بیرون آورد

    پس خدا تعالیٰ نے کچھ چیزیں زمین کی زمین سے نکالیں

    وانزل من السَّماء ماکان من السَّمٰوات العُلٰی۔

    و ہرچہ از آسمان بود از آسمان فرود آورد

    اور جو کچھ آسمان سے اتارنا تھا اتارا۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 128

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 128

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/128/mode/1up


    ففریقٌ عُلّموا مکائد الارض وفریقٌ اعطوا ما

    پس گروہے از فریب ہائے زمین تعلیم دادہ شدند وگروہے دیگر را چیز ہادادند کہ

    ایک گروہ نے زمین فریبوں سے تعلیم پائی اور دوسرے گروہ کو وہ چیزیں دیں

    اعطی الرُّسُل من الھُدٰی ۔ وقُدِّر الفتح

    انبیاء را دادہ بودند و دریں جنگ آسمانیاں را

    جو انبیاء کو دی تھیں اس جنگ میں

    للسماویّین فی ھٰذا الوغٰی ۔ وان تؤمنوا او لا

    فتح نصیب شد واگر شما ایمان آرید یا

    آسمان والوں کو فتح حاصل ہوئی تم چاہو ایمان لاؤ یا

    تؤمنوا لن یترک اللّٰہ العبد الذی ارسلہٗ

    نیارید خدا تعالیٰ آں بندہ را ہرگز نخواہد گذاشت کہ برائے اصلاح مردم اورا

    نہ لاؤ خدا تعالیٰ اپنے بندہ کو جسے اصلاح خلق کے لئے بھیجا ہے ہرگز

    للورٰی ۔ ولا تضاع الشمس لانکار الاعمٰی ۔

    فرستادہ است و خدا برائے انکار کورے آفتاب را ضائع نمے کند

    نہ چھوڑے گا اور خدا تعالیٰ ایسا نہیں ہے کہ اندھے کے انکار سے آفتاب کو ضائع کرے

    فریقان یختصمان فی الرشد والھوٰی ۔وفُتحت

    دو فریق اند کہ باہم خصومت می کنند وبرائے گروہے درہائے زمین

    دو فریق ہیں جو آپس میں جھگڑتے ہیں ایک گروہ

    لفریقٍ ابواب الارض الٰی تحت الثرٰی ۔ وللثّانی

    راکشادہ اند وبرائے گروہے دیگر

    کے لئے دروازے زمین کے کھولے گئے اور دوسرے گروہ کے لئے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 129

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 129

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/129/mode/1up


    ابواب السما ء الٰی سدرۃ المنتھٰی ۔ اما الذین

    در ہائے آسمان را۔ مگر آں گروہ کہ

    آسمانی دروازے کھولے گئے لیکن جس گروہ کے لئے

    فُتحت علیھم ابواب الارض فھم یتّبعون

    برایشاں درہائے زمین راکشادہ اند پس آناں ہستند کہ پیروی

    زمینی دروازے کھولے گئے وہ شیطان کی

    شیطانھم الذی اغوٰی ۔ والذین فُتحت

    شیطان مے کنند و آناں کہ برایشاں

    پیروی کرتے ہیں اور وہ گروہ جس کے لئے

    علیھم ابواب السّماء فھم ورثاء النبیین

    درہائے آسمان کشادہ اند اوشاں وارثان انبیاء ہستند

    آسمان کے دروازے کھولے گئے وہ انبیاء کے وارث ہیں

    وقومٌ مطھّرون من کل شحٍّ وھوًی _

    و از ہر گونہ گل و خاک پاک اند

    اور ہر ایک طرح سے پاک و صاف ہیں۔

    یدعون قومھم الٰی ربّھم ویمنعونھم مِمّا

    قوم را بسوئے پروردگامے خوانند و ایشاں را ازیں باز

    قوم کو پروردگار کی طرف بلاتے ہیں اور ان کو برائیوں سے بچاتے

    یُشرک بہٖ فی الارض والسَّمٰوات العلٰی ۔ و

    مے دارند کہ باخدا در زمین و آسمان ہیچ چیز را شریک کردہ شود

    ہیں اور کہتے ہیں کہ خدا کے ساتھ کسی چیز کو زمین و آسمان میں شریک نہ کرنا چاہئے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 130

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 130

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/130/mode/1up


    انی بعثتُ فیکم من اللّٰہ الذی لا توقرونہٗ

    من درشما از جانب خدائے مبعوث شدہ ام کہ او را عزت نمے کنید

    میں تم میں اس خدا تعالیٰ کی طرف سے مبعوث ہوا ہوں جس کی تم عزت نہیں کرتے

    لانذرقومًا اطرء وا ابن مریم عیسٰی ۔

    برائے اینکہ آں قوم را بتر سانم کہ درحق ابن مریم مبالغہ کردہ اند۔

    اور میں قوم کو اسی واسطے ڈراتا ہوں کہ ابن مریم علیہ السلام کے حق میں مبالغہ کرتے ہیں


    الباب الثالث

    یاقوم ماھٰذہ التماثیل التی انتم لھا

    اے قوم! ایں چہ تصویر ہاست کہ برآنہا سرنگوں

    اے قوم! یہ کیسے بت ہیں کہ جن پر

    عاکفون۔ اتترکون کلام اللّٰہ لاَ قْوَالٍ لا تعرفونھا

    نشستہ اید۔ آیا کلام خدا را ترک مے کنید بعوض گفتارہائے کہ حقیقت آنرا

    اعتکاف کئے بیٹھے ہو۔ کیا خدا کے کلام کو ترک کرتے ہو ان باتوں کے عوض میں کہ انکی حقیقت کی

    اُفٍّ لکم ولما تنحتون۔ وما تحقّقت عندکم

    نمے شناسید۔ تف برشما وبر تراشیدہ ہائے شما و آں قولہا و

    شناخت نہیں کرتے۔ تم پر اور تمہاری خود تراشیدہ باتوں پر افسوس۔ وہ قول اور ان کے قائل

    تلک الاقوال ولا قائلھا وان انتم الّا تظنون۔

    قائل آنہا نزد شما ثابت نیستند و شما پیروی وہم مے کنید

    تمہارے نزدیک ثابت نہیں ہیں اور تم وہم کی پیروی کرتے ہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 131

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 131

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/131/mode/1up


    أَتؤثرون الظنّ علی الیقین والظنّ لایغنی

    آیا گمان را بریقین اختیار مے کنید حالانکہ گمان از حق چیزے

    کیا گمان کو یقین پر اختیار کرتے ہو حالانکہ گمان حق سے مستغنی

    من الحق شیءًا ولا انتم بہٖ تبرء ون۔ وقد

    بے نیاز نمے کند و شما بسبب آں بری نمے شوید وہر آئینہ خدا

    نہیں کرتا اور تم اس کے سبب سے بری نہیں ہو سکتے اور

    وعد اللّٰہ انہٗ یستخلف من ھٰذہ الامۃ ط

    وعدہ فرمودہ اّست کہ از ہمیں امت خلیفہ بگرداند

    خدا نے بہ تحقیق وعدہ فرمایا ہے کہ اسی امت میں سے خلیفہ مقرر ہوں گے۔

    أَفَاَنْتُمْ لہٗ منکرون ۔ وما وعد انہٗ ینزل

    آیا شما انکار مے کنید وہرگز وعدہ نہ کردہ است کہ

    کیا تم انکار کرتے ہو اور ہرگز وعدہ نہیں کیا ہے کہ

    مسیحکم من السماء واِن وعد فاخرجوہ

    مسیح شما از آسمان فرود آید واگر کردہ است مارا

    تمہارا مسیح آسمان سے نازل ہووے اور اگر وعدہ کیا ہے ہمیں بھی

    لنا من القراٰن ان کنتم تصدقون ۔ وقد

    از قرآن وا نمائید اگر راست کار ہستید وہر آئینہ

    قرآن سے دکھلاؤ اگر تم سچے ہو اور

    ثبت من وعدہٖ ان خاتم الخلفاء منّا أفَاَنْتُم

    از وعدہ خدا ثابت گردیدہ است کہ خاتِم خلفاء از میان ماباشد آیا شما

    خدا کا وعدہ سچا ہو چکا ہے کہ خاتم الخلفاء ہم میں سے ہوگا کیا تم



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 132

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 132

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/132/mode/1up


    فیہ تشکون۔ فأیّ نزاعٍ بقی بعدہٗ مالکم لا

    دریں شک مے آرید پس کدام پیکار بعد ازاں باقی ماندہ شمارا چہ شد کہ

    اس میں شک رکھتے ہو پھر کونسی لڑائی بعد اس کے باقی رہ گئی تمہیں کیا ہوگیاکہ

    تفکرون۔ لا ترفعوا اصواتکم فوق کتاب اللّٰہ و ان

    اندیشہ نمی کنید آواز ہائے خود را بالائے قرآن بلند نہ کنید

    ڈرتے نہیں اپنی آوازوں کو قرآن پر بلند نہ کرو

    القراٰن قدحکم فی الذی کنتم فیہ تختلفون۔

    قرآن فیصلہ کردہ است در آنچہ شما اختلاف مے کردید

    قرآن نے فیصلہ کردیا ہے جس میں کہ تم اختلاف کرتے تھے

    اَلا ترضون بماقضی القراٰن واللّٰہ احقّ أَنْ یقبل

    آیا راضی نمے شوید برفیصلہ قرآن وخدا حق دار تر است کہ

    کیا تم قرآن کے فیصلہ پر راضی نہیں ہوتے اور خدا زیادہ حق دار ہے کہ اس کا

    قولہٗ ان کنتم تؤمنون۔ واللّٰہ جعل اوّلکم

    قول او پذیر فتہ شود اگر مومن ہستید و خدا اول و آخر

    فرمودہ قبول کیا جائے اگر تم مومن ہو اور خدا نے تمہارے اول

    واٰخرکم کسلسلۃ موسٰی فھل انتم تشکرون۔

    شما را مانند سلسلہ موسیٰ علیہ السلام گردانیدہ آیا شکر مے کنید

    اور آخر کو موسیٰ علیہ السلام کے سلسلہ کی مانند بنایا ہے کیا تم شکر کرتے ہو

    انظروا الٰی مثیل موسٰی سیدکم ونبیّکم فی

    نگاہ کنید سوئے سردار شما و نبیء شما مثیل موسیٰ علیہ الصلوٰۃ و السلام در

    ابتدائے سلسلہ میں تم اپنے سردار اور نبیء مثیل موسیٰ کی طرف نظر کرو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 133

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 133

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/133/mode/1up


    اوّل السلسلۃ فاین مثیل عیسٰی فی اٰخرھا او

    ابتداءِ سلسلہ پس مثیل عیسٰی در آخر سلسلہ کجاست یا

    پس مثیل عیسٰی اس سلسلہ کے آخر میں کہاں ہے

    بقیت السلسلۃ ناقصۃً ایّھا المتدبرون۔ الا

    سلسلہ ناتمام ماندہ است اے فکر کنندگان! آیا

    یا سلسلہ ناتمام رہ گیا اے فکر کرنے والو! کیا

    ترون فتن القوم الذین ھم من کل حدبٍ

    نمے بینید فتنہ ہائے آں قوم کہ از بالائے ہر بلندی

    تم اس قوم کے فتنہ کو نہیں دیکھتے کہ ہر ایک بلندی سے

    ینسلون۔ وقد جعلتم تحت اقدامھم نکالًا

    مے شتابند و شما در زیرپاہائے او شاں گردانیدہ شدہ اید بطور سزا

    دوڑتے ہیں اور تمہیں ان کے پیروں کے نیچے خدا نے ڈال دیا ہے بطور سزا

    من اللّٰہ ثم انتم لا ترجعون ۔ عسٰی ربّکم

    از خدا باز ہم رجوع نمے آرید۔ نزدیک است کہ پروردگار شما

    کے پھر بھی رجوع نہیں کرتے۔ قریب ہے کہ تمہارا پروردگار

    ان یرحمکم فویحکم لم لا تسمعون۔ أَتطمعون

    برشما رحم آرد افسوس چراگوش نمے دہید۔ آیا امید میکنید

    تم پر رحم کرے افسوس کیوں نہیں سنتے۔ کیا امید رکھتے ہو

    ان ینزل عیسٰی من السّماء ھیھات ھیھات لما

    کہ عیسیٰ از آسمان نازل شود ایں امید شما ہرگز بوقوع نخواہد آمد

    کہ عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے نازل ہوں؟ یہ تمہاری امید کبھی بھی پوری نہ ہوگی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 134

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 134

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/134/mode/1up


    تطمعون۔ أَترجون ان یخلف اللّٰہ وعدہٗ و

    آیا امید میکنید کہ خدا خلاف وعدۂ خود کند و

    کیا امید رکھتے ہو کہ خدا تعالیٰ اپنا وعدہ خلاف کرے اور

    یتبع اھواء کم ایھا المبطلون۔ ولواتبع اللّٰہ

    پیروی خواہشہائے شما کند اے باطل پرستاں اگر خدا پیروی

    تمہاری خواہشوں کی پیروی کرے اے باطل پرستو! اگر خدا تعالیٰ

    اھواء الناس لضاع التوحید باسرہٖ وکثر

    خواہشہائے مردم کردے توحید بالکلیہ ضائع شدے و

    لوگوں کی خواہشوں کی پیروی کرتا تو توحید بالکل نیست و نابود ہو جاتی اور

    الشرک والمشرکون۔ وان اللّٰہ لایبعث مرسلًا

    شرک و مشرکان بسیار گردیدندے و خدا مرسلے را برزمین

    شرک پھیل جاتا اورمشرک بہت ہو جاتے۔ اور خدا تعالیٰ کسی مرسل کو زمین پر

    علی الارض الّا لیدفع المفاسد التی افسدتھا

    پیدا نمے کند مگر بجہت اینکہ آں فسادہا را رفع کند کہ زمین را تباہ کردہ اند

    پیدا نہیں کرتا مگر فساد کے دفع کرنے کے لئے کہ جس نے زمین کو تباہ رکھا ہے۔

    فانظروا الی المفاسد ایھا العاقلون۔ یاحسرۃً

    پس فسادہا را نگاہ بکنید اے دانشمنداں ! افسوس برایشاں

    پس فسادوں کو غور سے دیکھو اے دانشمندو ! افسوس

    علیھم انھم ینظرون مانزل علی الاسلام ثم

    کہ ایشاں مے بینند بر اسلام چہ نازل شدہ باز

    ان پر کہ یہ لوگ دیکھتے ہیں کہ اسلام پر کیا بلا نازل ہو رہی ہے پھر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 135

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 135

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/135/mode/1up


    لاینظرون۔ ولئن سالتھم انّ رجلًا ن ادعٰی انّہٗ

    نمے بینند و اگر از ایشاں بپرسی کہ مردے دعویٰ کرد کہ من

    نہیں دیکھتے اور اگر ان سے سوال کیا جائے کہ ایک شخص نے دعویٰ کیا کہ میں

    من اللّٰہ وانّہٗ ھوالمسیح وجاء فی زمن

    از خدا ہستم و مسیح موعود منم و در زمانہ

    خدا کی طرف سے ہوں اور مسیح موعود میں ہی ہوں

    مفاسد الصلیب فکسر الصلیب کسرًا لایوجد

    فساد ہائے صلیب ظاہر شد پس صلیب را چناں شکست کہ

    پھر اس نے صلیب کو ایسا توڑا کہ

    مثلہٗ فیما مضٰی ولا یتوقع فی الازمنۃ الاٰتیۃ

    مانند او در زمانہ ماضی یافتہ نمے گرد د ونہ متوقع ہست کہ آئندہ مثل او پیدا شود

    کہ اس کی نظیر زمانہ گذشتہ میں پائی نہیں جاتی اور نہ آئندہ توقع ہے۔

    فبایّ اسمٍ سمّاہ رسول اللّٰہ ان کنتم تعلمون

    پس رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم چہ نام او نہادہ است

    اس کا نام رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کیا رکھا ہے؟

    لیقولن انہٗ سُمّی مسیحًا وابن مریم علٰی لسان

    ہر آئینہ بجواب خواہند گفت کہ نام او مسیح و ابن مریم بر زبان

    جواب دیں گے کہ اس کا نام مسیح اور ابن مریم خدا اور اس کے رسول کی زبان پر

    رسول اللّٰہ وبُیّن انّہٗ من ھٰذہ الامۃ قل

    رسول خدا مقرر شدہ است و بیان کردہ شدہ است کہ او از ہمیں امت خواہد بود بگو

    مقرر ہوا ہے اور بیان کیا گیا ہے کہ وہ اسی امت میں سے ہوگا کہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 136

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 136

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/136/mode/1up


    الحمد للّٰہ علٰی ما اظھر الحق ولکن اکثر الناس

    حمد مر خدا راست کہ او حق را ظاہر کردہ و لیکن بسیار کس از مردم

    کہ تعریف خدا کو ہی لائق ہے جس نے حق کو ظاہر کیا لیکن بہت لوگ

    لا یعلمون۔ ایّھا الناس انظروا الٰی کمال ایّام

    نمے دانند۔ اے مردم ! بسوئے کمال روزہائے

    نہیں جانتے۔ اے لوگو ! گمراہی کے دنوں کے کمال کی طرف

    الضلال ولا تکفروا بایّام اللّٰہ ذی الجلال ان

    گمراہی نگاہ بکنید و انکار روزہائے خدا نکنید اگر

    نگاہ کرو اور خدا کے دنوں کا کفر مت کرو اگر

    کنتم تتقون۔ اما رء یتم کسوف الشمس والقمر

    متقی ہستید۔ آیا کسوف آفتاب و ماہتاب

    متقی ہو۔ کیا تم نے چاند اور سورج کا گرہن

    فی رمضان فمالکم لا تھتدون۔ اما رئیتم

    در رمضان ندیدہ اید پس چرا ہدایت نمے یابید آیا ندیدید کہ

    رمضان کے مہینے میں نہیں دیکھا۔ تم کیوں ہدایت نہیں پاتے کیا تم نے نہیں دیکھا کہ

    کیف اشیع الطاعون۔ وکثر المنون۔ فذالک

    طاعون چگونہ منتشر شدہ وکثرت موت شدہ پس آں

    طاعون کس طرح پھیل گیا اور موت کی کثرت ہوئی پس وہ

    و ھٰذا شھادۃٌ مّن السماء و الارض کما

    وایں گواہی است از آسمان وزمین چناں کہ

    اور یہ آسمان اور زمین کی گواہیاں ہیں جیساکہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 137

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 137

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/137/mode/1up


    اخبر المرسلون۔ وقد اجتمع کُلّ مَاجاء فی

    مرسلان خبردادہ بودند وہمہ آنچہ از نشان ہائے آخر زمان

    رسولوں نے خبر دی تھی اور جو کچھ آخری زمانہ کی خبروں کے متعلق

    القراٰن من اٰثار اٰخر الزمان فمالکم لا تستیقظون

    در قرآن آمدہ جمع شدہ است چرا بیدار نمے شوید

    قرآن میں اس کا ذکر آیا ہے سب جمع ہوگئے ہیں۔ اب تم کیوں نہیں جاگتے۔

    ولما ثبت ان الزمان قد انتھٰی الٰی اٰخرہٖ فأَین

    وہرگاہ ثابت گردیدہ است کہ زمانہ بآخر رسیدہ است پس

    اور جبکہ ثابت ہوگیا ہے کہ زمانہ کا آخر ہوگیا ہے پس

    خلیفۃ اٰخر الزمان ان کنتم تعرفون۔ ایّھا

    خلیفۂ آخر زماں کجاست اگر مے شناسید اے

    آخری زمانہ کا خلیفہ کہاں ہے اگر پہچانتے ہو اے

    المنکرون اٰمنوا اولا تؤمنوا ان الذین اوتوا علم

    منکران ایمان آرید یا نیارید آں کسانے کہ علم کتاب

    منکرو ایمان لاؤ یا نہ لاؤ وہ لوگ جنہیں کتاب کا علم

    الکتاب وحظًّا من السعادۃ یقبلوننی و ھم

    و بہرہ از سعادت یافتہ اند مرا قبول مے کنند و

    ہے اور سعادت سے حصہ رکھتے ہیں مجھ کو قبول کرتے ہیں اور

    لایستأْخرون۔ واذا رأوا علاماتٍ ذکرت فی

    تاخیر نمے نمایند و چوں اوشاں علامات مذکورہ قرآن

    دیر نہیں لگاتے جب وہ قرآن کی بیان کی ہوئی علامتیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 138

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 138

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/138/mode/1up


    القراٰن وخلیفۃٌ ینادی الی الرحمٰن خَرّوا علی

    و خلیفہ را مے بینند کہ سوئے خدا دعوت مے کند سجدہ کناں

    اور خلیفہ کو دیکھتے ہیں جو خدا کی طرف بلاتا ہے تو سجدہ کرتے ہوئے

    الاذقان سُجّدًا وعلٰی ما فرطوا یتندمون۔

    بر روہا مے افتند و بر قصورہائے خویش پشیمان مے شوند

    اوندھے گر پڑتے ہیں اور اپنے قصوروں پر پشیمان ہوتے ہیں

    و ترٰی اعینھم تفیض من الدمع بما عرفوا الحق

    و مے بینید کہ چشمہائے اوشاں ازشناخت حق سرشک رواں مے کنند

    اور دیکھتے ہو کہ ان کی آنکھیں حق کے پہچاننے پر آنسو بہاتی ہیں

    وتنزل السکینۃ فی قلوبھم ویؤمنون بما انزل

    وسکینت برقلوب ایشاں نازل مے شود و بر نازل کردہ خدا ایمان مے آرند

    اور ان کے دل سکینت حاصل کرتے ہیں اور خدا کے اتارے ہوئے پر ایمان

    اللّٰہ وھم یبکون۔ ربّنا انّنا سمعنا منادیًا و

    وگریہ می کنند ومیگویند اے پروردگار ما شنیدہ ایم ندا کنندہ را و

    لاتے ہیں اور روتے ہیں اور کہتے ہیں کہ اے ہمارے پروردگار ہم نے پکارنے والے کو سنا

    عرفنا ھادیًا فاغفرلنا ذنوبنا انا تائبون۔

    شناختیم رہنمائے را پس گناہان مارا بیامرز ماتوبہ مے کنیم

    اور رہنما کو پہچان لیا پس ہمارے گناہوں کو بخش دے ہم توبہ کرتے ہیں۔

    و قال اللّٰہ لا تثریب علیکم الیوم ستغفر

    و خدا بگوید کہ امروز ہیچ سرزنش برشما نیست گناہان شما

    اورخدا کہتا ہے کہ آج تم پر کوئی تنبیہ نہیں تمہارے گناہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 139

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 139

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/139/mode/1up


    ذنوبکم وتدخلون فی الذین یکرمون۔ یا معشر

    بخشیدہ شوند و دربندگاں عزت یافتہ داخل شوید اے

    بخشے جائیں گے اور معزز بندوں میں داخل ہوگے۔ اے

    العقلاء لا ترقبوا ان ینزل احدٌ مّن السّماء

    گروہ دانشمندان امید نہ کنید کہ کسے از آسمان فرود آید

    عقل والو امید نہ رکھنا کہ کوئی آسمان سے اترے گا

    واعلموا ان ھٰذا ھو یومکم الذی کنتم توعدون۔

    و بدانید کہ ایں ہماں روز است کہ شما را وعدہ دادہ مے شد

    اور جان لو کہ یہ وہی دن ہے جس کا تم کو وعدہ دیا جاتا تھا۔

    وقد وعد اللّٰہ الذین اٰمنوا منکم لیستخلفنھم

    و خدا وعدہ کردہ بود بامومناں از شما کہ اوشاں را

    اور خدا نے مومنوں سے وعدہ کیا تھا کہ ان کو

    کمثل خلفاء شرعۃ موسٰی فوجب ان یأْتی اٰخر

    مثل خلفائے شریعت موسیٰ خلیفہ خواہد کرد ازینجا واجب آمد کہ خاتم خلفائے

    موسیٰ کی شریعت کے خلیفوں کی مانند خلیفہ بنائے گا۔ یہاں سے واجب ہوا کہ آخری خلیفہ

    الخلفاء علٰی قدم عیسٰی ومن ھٰذہ الامۃ

    محمدیہ برقدم عیسیٰ بیاید واز ہمیں امت باشد

    عیسیٰ علیہ السلام کے قدم پر آئے گا اور اسی امت میں سے ہوگا

    و انتم تقرء ون القراٰن أَفَلا تفھمون۔ وعدٌ

    و شما قرآن مے خوانید آیا نمے فہمید ایں وعدہ

    اور تم قرآن پڑھتے ہو کیا نہیں سمجھتے یہ خدا کا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 140

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 140

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/140/mode/1up


    مّن اللّٰہ فلا تحسبوا وعد اللّٰہ کموا عید قومٍ یکذبون۔

    از خدا بود پس وعدہ خدا را مانند وعدہ ہائے دروغگویاں گمان نکنید

    وعدہ تھا پس خدا کے وعدہ کو جھوٹوں کے وعدوں کی طرح نہ سمجھو۔

    وکیف یتمّ وعد اللّٰہ من دون ان یظھر المسیح

    وچگونہ وعدۂ خدا تمام شود بدون آنکہ مسیح از شما ظاہر شود

    اور خدا کا وعدہ کس طرح پورا ہو بغیر اس کے کہ مسیح تم میں سے ظاہر ہو

    منکم مالکم لا تفکرون فی اٰیات اللّٰہ ولا

    چرا در آیات خدا فکر و تدبر نمے کنید

    کیوں خدا کی آیتوں میں فکر اور تدبر نہیں کرتے

    تتدبرون۔ أَیَلِیْقُ بشان اللّٰہ ان یعدکم انّہٗ

    آیا سزاوار شان خداوندی است کہ باشما وعدہ کند

    کیا خدا کی شان کے لائق ہے کہ تم سے وعدہ کرے

    یبعث الخلفاء منکم کمثل الذین خلوا من قبل

    کہ خلفاء از میان شما پیدا کند مانند آناں کہ از پیش گذشتند

    کہ خلیفے تم میں سے پیدا کرے گا ان کی مانند جو پہلے گذرے

    ثم ینسٰی وعدہٗ وینزل عیسٰی من السّماء

    باز وعدۂ خود را فراموش کند و عیسیٰ را از آسمان فرود آرد

    پھر اپنے وعدہ کو بھول جائے اور عیسیٰ کو آسمان سے اتارے

    سبحانہٗ وتعالٰی عمّا تفترون۔ فمالکم انّکم

    خدا تعالیٰ ازیں افتراہائے شما بزرگ و بلند تراست چرا درحق

    خدا تعالیٰ تمہارے ان افتراؤں سے پاک اور برتر ہے کیوں







    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 141

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 141

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/141/mode/1up




    تجادلون فی المسیح الموعود وتصرّون علٰی انّہٗ

    مسیح موعود جنگہا مے کنید وبرایں اصرار مے کنید کہ

    مسیح موعود کے حق میں لڑتے ہو اور اس پر اصرار کرتے ہو کہ

    ھوالمسیح ابن مریم وتقرء ون کتاب اللّٰہ

    او ہماں مسیح ابن مریم باشد حالانکہ کتاب خدا مے خوانید

    وہ وہی مسیح ابن مریم ہوگا حالانکہ تم خدا کی کتاب پڑھتے ہو

    ثمّ تذھلون۔ وانّ اللّٰہ قد حکم بینکم و

    باز غافل ہستید و خدا درمیان ما و شما فیصلہ کردہ

    پھر غافل ہو اور خدا نے ہم میں اور تم میں فیصلہ

    بیننا وفَصّل الاٰیات لقومٍ یتّقون۔ وانّہٗ

    وبرائے پرہیزگاراں نشان ہا را واضح گردانیدہ و خدا

    کردیا ہے اور پرہیزگاروں کے لئے نشانوں کو کھول دیا ہے اور خدا

    اراد لیدافع عن الّذین اٰمنوا ویدفع فتن

    مے خواہد کہ حمایت مومناں بکند و فتن ہائے

    چاہتا ہے کہ مومنوں کی حمایت کرے اور صلیب کے

    الصّلیب فھل انتم تکرھون۔ وقد جرت

    صلیب دفع بنماید آیا شما پسند نمی کنید و عادت خدا

    فتنوں کو دفع کرے کیا تم پسند نہیں کرتے اور خدا کی یہ

    عادتہٗ ان یّرسل عبادہٗ عند سیل الفتن

    جاری شدہ است کہ بندگان خود را دروقت سیل فتنہ ہا می فرستد

    عادت ہے کہ اپنے بندوں کو فتنوں کے طوفان کے وقت بھیجتاہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 142

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 142

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/142/mode/1up


    فاسئلوا الّذین یعلمون ان کنتم ترتابون۔ أَفطمعون

    از عالمان بپرسید اگر شک مے آرید آیا طمع مے دارید

    یہ بات عالموں سے پوچھ لو اگر شک ہے کیا تم طمع رکھتے ہو

    ان یّاْتی المسیح من السّماء کما ظننتم وقد

    کہ مسیح موافق گمان شما از آسمان فرود آید و

    کہ مسیح تمہارے گمان کے موافق آسمان سے اترے اور

    خلت سنّۃ اللّٰہ من قبل افلا تعلمون۔ وما

    سنت خداوندی پیش ازیں گذشتہ آیا نمے دانید ہرگز

    خدا کی سنّت پہلے اس سے گذر چکی کیا تم نہیں جانتے۔ ہرگز

    جاء مرسلٌبطریقٍ زعم الزّاعمون۔ فکیف

    مرسلے بآں طور نیا مدہ کہ گمان کنندگان پنداشتند پس چگونہ

    کوئی رسول اس طرح سے نہیں آیا جس طرح گمان کرنے والوں نے جانا۔ پس

    انتم تتوقّعون۔ وقد زعم الیھود من قبلکم

    شما توقع مے دارید وپیش از شما یہود گمان بردند

    تم کس طرح توقع رکھتے ہو اور تم سے پہلے یہودیوں کا گمان تھا

    انّ مسیحھم لایأتی الّا بعد ان یّنزل نبیٌّ

    کہ مسیح ایشاں نخواہد آمد مگر بعد ازاں کہ پیغمبرے از آسمان

    کہ ان کا مسیح نہ آئے گا جب تک کوئی پیغمبر آسمان سے

    مّن السّماء فما صدّق اللّٰہ زعمھم فکفروا

    بیاید خدا ایں گمان او شاں را راست نہ کرد لہٰذا

    نہ اترلے خدا نے ان کے اس گمان کو سچا نہ کیا۔ اس لئے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 143

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 143

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/143/mode/1up


    بابن مریم وھم یختصمون۔ وکذالک زعموا

    کفر ابن مریم کردند و ہنوز جنگ مے کنند و ہم چنیں گمان کردند

    ابن مریم کا انکار کیا اور اب بھی یہی کہتے ہیں۔ اور اسی طرح گمان کیا

    انّ مثیل موسٰی من بنی اسرائیل فلمّا بعث

    کہ مثیل موسیٰ از بنی اسرائیل خواہد بود مگر ہر گاہ آں موعود

    کہ مثیل موسیٰ بنی اسرائیل میں سے ہوگا مگر جس وقت وہ موعود

    من بنی اسماعیل کفروا بہٖ والٰی یومنا ھٰذا

    از بنی اسماعیل پیدا شد باو کفر کردند و تا امروز

    بنی اسماعیل میں سے پیدا ہوا اس کو نہ مانا اور اب تک

    لایؤمنون فتلک سنّۃٌ مّن سنن اللّٰہ انّہٗ

    ایمان نمے آرند۔ از عادات خداست کہ

    نہیں مانتے۔ خدا کی عادتوں میں سے ایک یہ عادت ہے کہ

    یری بعض اجزاء نبأہٖ ویُخفی البعض فالّذین

    بعض اجزائے پیشگوئی را ظاہر مے کند و بعضے را پوشیدہ می دارد۔ پس آنا نکہ

    پیشگوئی کے بعض اجزاکو ظاہر کر دیتا ہے اور بعض کو مخفی رکھتا ہے پس جن لوگوں کے

    فی قلوبھم زیغٌ یجعلون ما اختفی متّکأً لانکارھم

    دلہائے اوشاں کج مے باشند حصہ پوشیدہ را برائے انکار خود سند مے گیرند

    دل ٹیڑھے ہوتے ہیں مخفی حصہ کو اپنے انکار کے لئے سند پکڑتے ہیں

    وھم عمّا ظھر یعرضون۔ ولایتفکّرون لعلّہٗ

    و از آنچہ ظاہر شدہ رومے گردانند و فکرنمے کنند کہ شاید آں

    اور جو حصّہ ظاہر ہوا اس سے منہ پھیرتے ہیں اور فکر نہیں کرتے کہ شاید وہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 144

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 144

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/144/mode/1up


    فتنۃٌ لّھم وقد کثر الامثال فما یقرء ون۔

    امتحان باشد برائے اوشاں ومثل ایں بسیار واقعات گذشتہ ولیکن نمے خوانند

    امتحان ہو ان کے لئے اور اس جیسے بہت سے واقعات گذرے لیکن نہیں پڑھتے

    لا تسلکوا طریقًا غیر طریق القراٰن یاأَھل الدّھاء

    اے دانشمنداں ہیچ راہے جز راہ قرآن اختیار نہ کنید

    اے عقل والو قرآن کی راہ کے سوا اور کوئی راہ اختیار مت کرو

    ولا تقولوا انّ عیسٰی نازلٌ مّن السّماء انتھوا

    و مگوئید کہ عیسٰی از آسمان نازل شود باز بیائید

    اور یہ نہ کہو کہ عیسیٰ آسمان سے اترے گا باز آجاؤ

    خیر لّکم ایّھا المسلمون۔ انّکم اخترتم عقیدۃً

    در حق شما بہتراست شما عقیدہ اختیار کردہ اید

    یہی تمہارے حق میں اچھا ہے اے مسلمانو! تم نے تو وہ عقیدہ اختیار کیا ہے

    لانظیر لھا فی الانبیاء وانّا اخترنا عقیدۃً

    کہ در انبیاء نظیر آں نیست و ما آں عقیدہ را اختیار کردہ ایم

    جس کی مثال نبیوں میں نہیں اور ہم نے وہ عقیدہ اختیار کیا ہے

    کثرت نظائرھا فی الرّسل والاصفیاء فايّ

    کہ در رسولاں و برگزیدگان نظائر آں بے شمار اند پس ازیں

    کہ رسولوں اور برگزیدوں میں اس کی نظیریں بے شمار ہیں پس ان

    الفریقین احقّ بالامن واقرب الی الصّدق

    دو فریق حق دار امن و نزدیک صدق و صفا

    دونوں فریقوں میں سے امن کا حق دار اور صدق و صفا کے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 145

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 145

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/145/mode/1up


    والصّفاء ایّھا العاقلون۔ ومانزل نبیٌّ مّن السّماء

    کدام است و پیش ازیں ہیچ نبی از آسمان نازل

    نزدیک کونسا ہے اور اس سے پہلے کوئی نبی آسمان سے نازل

    من قبل فکیف انتم تترقّبون۔ وکان الیھود

    نہ شدہ است شما چگونہ انتظار مے کشید یہود

    نہیں ہوا تم کس طرح انتظار کرتے ہو۔ یہود بھی

    یعتقدون کمثلکم انّ الیاس ینزل من السّماء

    مثل شما اعتقاد مے داشتند کہ الیاس پیش از مسیح از آسمان

    تمہارے جیسا اعتقاد رکھتے تھے کہ الیاس مسیح سے پہلے آسمان سے

    قبل المسیح وکانوا علیہ یصرّون۔ فلمّاجاء

    نازل شود و برایں عقیدہ اصرار مے کردند پس چوں

    نازل ہوگا اور اس عقیدہ پر اصرار کرتے تھے اور جس وقت

    المسیح کذّبہ القوم وقالوا کیف نقبلہٗ و

    مسیح آمد او را تکذیب کردند وگفتند او را چگونہ قبول کنیم و

    مسیح آیا اس کی تکذیب کی اور کہا اس کو کس طرح قبول کریں کیونکہ

    مانزل الیاس ولایأْتی المسیح الصّادق الّا

    ہنوز الیاس نازل نشدہ و ضرور است کہ مسیح صادق

    ابھی الیاس نہیں اترا اور ضرورہے کہ سچا مسیح

    بعد نزولہٖ و انّا لہٗ منتظرون ۔ فردّ عیسٰی

    بعد نزول الیاس نازل شود و ماچشم در راہ او ہستیم ۔ پس عیسٰی

    الیاس کے نزول کے بعد نازل ہو اور ہم اس کے منتظرہیں پس عیسٰی نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 146

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 146

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/146/mode/1up


    مازعموہ وقال انّ یحي الّذی ارسل من

    گمان ایشاں را ردّ کرد وگفت کہ آں یحیےٰ کہ پیش از من فرستادہ شدہ

    ان کا گمان رد کیا اور کہا کہ حضرت یحییٰ جو میرے سے پہلے بھیجا گیا ہے

    قبلی ھو الیاس ان کنتم تقبلون۔ فما قبلوا

    است ہماں الیاس است اگر قبول مے کنید پس نہ قبول کردند

    وہی الیاس ہے اگر قبول کرو۔ پس نہ قبول کیا

    وکفروا بعیسی ابن مریم رسول اللّٰہ فغضب

    و حضرت عیسٰی را انکار کردند پس

    اور حضرت عیسیٰ کا انکار کیا پس

    اللّٰہ علیھم ولعنھم وانزل علیھم رجزہٗ

    خدابر ایشاں غضبناک شد و *** کرد و برکفر ایشاں طاعون

    خدا ان پر غضبناک ہوا اور ان پر *** بھیجی اور ان کے کفر پر طاعون

    بماکانوا یکفرون۔ ثمّ اتّبعتم عقیدتھم

    برایشاں فرستاد باایں ہمہ شما عقیدۂ یہود را پیروی کردید

    ان پر بھیجا باوجود اس کے پھر تم نے یہود کے عقیدہ کی

    بقولکم انّ المسیح ینزل من السّماء أَ وصّٰکم

    کہ مسیح از آسمان نازل بشود آیا یہود شمارا وصیت

    پیروی کی کہ مسیح آسمان سے اترے گا کیا یہودیوں نے تم کو وصیت

    الیھود ام تشابھت القلوب والعیون۔

    کردند یا دل و دیدہ بایشاں مشابہ شدہ اند۔

    کی یا دل اور آنکھ ان جیسے ہوگئے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 147

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 147

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/147/mode/1up


    فصارت اھواء کم کاھواء ھم وقرب أن تجزون

    پس خواہش شما خواہش ایشاں گردید و نزدیک است کہ شما

    تمہاری اور ان کی ایک خواہش ہوگئی اور قریب ہے کہ تم کو بھی وہی سزا ملے

    کجزاء ھم فاتّقوا اللّٰہ ولا تتّبعوا سنن المغضوب

    بہموں پاداش گرفتار بشوید کہ ایشاں شدند پس از خدابترسید و برراہ قوم مغضوب علیہم

    جو ان کو ملی پس خدا سے ڈرو اور مغضوب علیہم قوم کی راہ پر نہ چلو

    علیھم فیمسّکم العذاب وانتم تقرء ون الفاتحۃ

    رفتار نکنید کہ شمارا عذاب برسد و شما فاتحہ را میخوانید

    ورنہ تم پر عذاب ہوگا اور تم سورۂ فاتحہ کو پڑھتے ہو

    الا تعلمون۔ وقد سمّی اللّٰہ تلک الیھود

    آیا نمے دانید کہ خدا آں یہود را بنام

    کیا تم نہیں جانتے کہ خدا نے ان یہودیوں کا نام

    المغضوب علیھم وحذّرکم فی امّ الکتاب ان

    مغضوب علیہم یاد کرد و درسورۃ فاتحہ شمارا بترسانید ازیں کہ

    مغضوب علیہم رکھا اور سورۃ فاتحہ میں تم کو اس بات سے ڈرایا کہ

    تکونوا کمثلھم وذکّرکم انّھم اھلکوا بالطّاعون

    شما مانند اوشاں شوید وشمارا یاد بداد کہ اوشاں باطاعون ہلاک شدند

    تم ان جیسے ہو جاؤ اور تم کو یاد دلایا کہ وہ طاعون سے ہلاک کئے گئے

    فما لکم تنسون وصایا اللّٰہ ولا تتّقون ربّکم

    چہ شد کہ احکام خدا را فراموش مے کنید و ازو نمے ترسید

    تمہیں کیا ہوگیا کہ تم خدا کے حکموں کو بھول گئے اور اس سے نہیں ڈرتے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 148

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 148

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/148/mode/1up


    ولا تحذرون۔ ولا تفکّرون فی قول اللّٰہ غیر

    در قول خدا تعالیٰ اندیشہ نمے کنید کہ

    خدا تعالیٰ کی کلام میں غور نہیں کرتے کہ

    المغضوب علیھم ولم یقل غیر الیھود فانّہٗ

    غیر المغضوب علیھم فرمودہ و غیر الیھود نہ گفتہ زیراکہ

    غیر المغضوب علیھم فرمایا غیر الیھود نہیں فرمایا کیونکہ

    اومٰی فی ھٰذہٖ الٰی عذابٍ اصابھم والٰی عذابٍ

    دریں اشارہ بسوئے آں عذاب است کہ باوشاں رسید وبشما

    اس میں اشارہ اس عذاب کی طرف ہے جوان کو پہنچا اور جو

    یّصیبکم ان لّم تنتھوا فھل انتم منتھون ۔

    خواہد رسید اگر باز نیامدید پس آیا ممکن است کہ شما باز بیائید

    تمہیں پہنچے گا اگر تم باز نہ آئے پس کیا ممکن ہے کہ تم بچے رہو

    وانّہٗ نبأٌعظیمٌ وقد ظھرت اٰثارہٗ وانّ فی

    و ایں خبر بزرگ است و آثار آں ظاہر شدہ و البتہ دریں

    اور یہ بڑی اطلاع ہے اور اس کے نشان ظاہر ہوگئے اور

    ھٰذا لاٰیۃً لّقومٍ یّفکّرون۔ وقد غضب اللّٰہ

    نشان است برائے آناں کہ فکر مے کنند و ہر آئینہ خدا

    اس میں ان کے لئے نشان ہے جو فکر کرتے ہیں اور خدا یہودیوں پر اس بات سے

    علی الیھود بقولھم انّ موعودھم ینزل من

    بر یہود خشمناک شد چوں گفتند کہ موعودما از آسمان

    غصہ ہوا جب انہوں نے کہا کہ ہمارا موعود آسمان سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 149

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 149

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/149/mode/1up


    السّماء ثمّ یاتی المسیح فقال اللّٰہ علٰی لسان

    نازل شود باز درپس آں مسیح بیاید پس خدا برزبان

    نازل ہوگا پھر اس کے بعد مسیح نازل ہوگا پس خدا نے عیسٰی کی زبانی

    عیسٰی انّھم قومٌ مبطلون۔ فمالکم ترجون امرًا

    عیسی فرمود کہ اینہا قوم باطل پرست ہستند اکنوں چہ شد کہ شما امیدوار ہماں امر

    فرمایا کہ یہ باطل پرست قوم ہے۔ اب تمہیں کیا ہوگیا کہ تم اسی بات کے

    ابطلہ اللّٰہ من قبل والمؤمن لایلدغ من جحرٍ

    مے باشید کہ پیش ازیں خدا آں را باطل قرارداد و ثابت است کہ مومن ازیک سوراخ

    امیدوار ہو جسے خدا نے اس سے پہلے باطل قرار دیا اور ثابت ہے کہ مومن ایک ہی سوراخ سے دوبار

    وّاحدٍ مرّتین ویتّعظ بغیرہٖ لِئلّا یلومہ اللّا ئمون۔

    دوبار گزیدہ نمے شود ونیزازدیگراں عبرت مے پذیرد تانشانہ ملامت نہ گردد

    نہیں کاٹا جاتا اور یہ کہ دوسروں سے عبرت پکڑتا ہے تا ملامت کا نشانہ نہ بنے

    أَتکملون ھٰذہ المشابھۃ بالسنکم وغلوّکم

    آیا ایں مشابہت را با زبان خود و از غلّو کردن

    کیا تم اس مشابہت کو اپنی زبان سے اور نزول کے عقیدہ پر غلّو کرنے سے

    علٰی عقیدۃ النّزول وتعلمون انّ المسیح قد

    برعقیدہ نزول کامل مے کنید و شما مے دانید کہ مسیح

    کامل کرتے ہو اور تم جانتے ہو کہ مسیح نے

    خالف ھٰذا الرّأی فمالکم تحبّونہٗ ثمّ تعصون

    خلاف ایں رائے کردہ پس چہ سبب است کہ اورا دوست مے دارید و

    اس رائے کے خلاف کیا ہے۔ پس کیا سبب ہے کہ اس کی دوستی کا دم بھرتے ہو لیکن



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 150

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 150

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/150/mode/1up


    حکمہٗ وتخالفون۔ وانّ الطّاعون قریبٌ مّن

    از حکم او سر باز مے زنید و طاعون نزد

    اس کا حکم نہیں مانتے اور طاعون تمہارے گھر کے قریب

    دارکم وماتدری نفسٌ مّایفعل بھافی سنۃٍ

    خانۂ شما خیمہ زدہ و ہیچ نفسے نمے داند کہ درسال آئندہ برسرش

    پہنچ گئی اور کوئی نہیں جانتا کہ آئندہ سال میں اس کے سر پر

    اٰتیۃٍ فلا تکفروا کلّ الکفر وتوبوا الی اللّٰہ الّذی

    چہ فرود آید پس کفررا بایں حد نہ رسانید و بسوئے خدا رجوع آرید کہ آخر

    کیا گزرے گا پس کفر کو اس حد تک نہ پہنچاؤ اور خدا کی طرف آؤ کہ آخر

    الیہ ترجعون۔ وتعلمون انّہٗ رجزٌ نزل علی

    رجوع بسوئے او خواہد بود شمامے دانید کہ ایں طاعون ہماں رجز است کہ

    اسی کے پاس جانا ہے اور تمہیں معلوم ہے کہ یہ طاعون وہی عذاب ہے جو

    الیھود ثمّ ینزل علی الّذین یشابھونھم غضبًا

    بریہود نازل شد باز بروشاں از غضب خدا نازل شود کہ مشابہت با یہود پیدا کنند

    یہود پر نازل ہوا پھر ان لوگوں پر یہ عذاب خدا کے غضب سے نازل ہوگا جو یہودیوں کی طرح

    مّن اللّٰہ وذالک ھوالسّرّفی اٰیۃ غیر المغضوب

    ہمیں راز است درآیت غیرالمغضوب علیھم

    ہو جائیں گے غیرالمغضوب علیھمکی آیت میں یہی بھید ہے

    علیھم ایّھا المتدبّرون۔ یاحسرۃً علی النّاس

    وائے بر مردم کہ

    ان لوگوں پر افسوس



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 151

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 151

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/151/mode/1up


    انّھم یرون اٰیات اللّٰہ وایّامہٖ ثمّ یعرضون۔

    کہ نشان ہائے خدا وروزہایش رامے بینند باز رد مے گردانند

    جو خدا کے نشانوں کو اور اس کے دنوں کو دیکھتے ہیں پھر منہ پھیرتے ہیں

    واذا قیل لھم اٰمنوا بما وعد اللّٰہ فی سورۃ النّور

    چوں باوشاں گفتہ شود کہ بروعدہ خدا کہ درسورہ نور و فاتحہ مذکوراست

    پھر جب ان سے کہا جاتا ہے کہ خدا کے اس وعدہ پر جو سورۃ نور میں اور فاتحہ میں مذکور

    والفاتحۃ قالوا أَنؤمن کما اٰمن الجاھلون۔

    ایمان آرید میگویند آیا مثل جاہلان ایماں بیاریم

    ہے ایمان لاؤ تو کہتے ہیں کہ کیا ہم جاہلوں کی طرح ایمان لائیں

    الا انّھم ھم الجھلاء ولٰکن لّایشعرون۔ و

    آگاہ باش کہ ہمیں جاہلانند و لیکن شعور ندارند و

    خبردار کہ یہی لوگ جاہل ہیں لیکن بے شعور ہیں اور

    اذا قیل لھم اتّقوا اللّٰہ ولاتتّبعوا اھواء کم

    ہرگاہ گفتہ شود کہ از خدا بترسید و پیروی خواہش نکنید

    جس وقت کہا جائے کہ خدا سے ڈرو اور خواہش کی پیروی نہ کرو

    قالوا انّما نحن متّقون۔ وقد ترکوا القراٰن

    گویند ما متقی ہستیم حالانکہ قرآن را از ظلم و تکبّر

    کہتے ہیں کہ ہم پرہیزگار ہیں حالانکہ قرآن کو ظلم اور تکبّر سے

    ظلمًا وّعلوًّا واذا دعوا الی الحقّ فہم یغضبون۔

    ترک دادہ اند وہرگاہ بسوئے حق ایشاں را بخوانیم خشم مے گیرند

    چھوڑدیا ہے اور جس وقت حق کی طرف انہیں بلائیں غصّہ سے بھر جاتے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 152

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 152

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/152/mode/1up


    وايّ جھالۃٍ اکبرمن انّھم ذھبوالٰی اقوالٍ شتّٰی

    وبزرگ تر ازیں جہل چہ باشد کہ گفتار ہائے پراگندہ را قبول کردہ اند

    اور اس سے زیادہ اور کیا جہالت ہے کہ پریشان باتوں کو مانا ہوا ہے۔

    وبوعد القراٰن لا یؤمنون۔ وانّہٗ کتابٌ لا

    و وعدۂ قرآن را نمے پذیرند و قرآن کتابے است کہ

    اور قرآن کے وعدہ کو قبول نہیں کرتے اور قرآن ایک ایسی کتاب ہے

    یأتیہ الباطل من بین یدیہ ولا من خلفہٖ

    باطل را از پیش و از پس دراں راہ نیست

    کہ باطل کو اس میں کسی طرف سے راہ نہیں

    وھل یستوی الیقین والظّنون۔ وانّ الاحادیث

    و آیا ممکن است کہ یقین و گمان برابر بشوند و ثابت است کہ ہمہ حدیث ہا

    اور کیا ممکن ہے کہ یقین اور گمان برابر ہو جائیں۔ اور ثابت ہے کہ تمام حدیثیں

    کلّھا قد جمعت بعد ماءۃٍ او مأتین وانّ

    بعد از یک صد یا دو صد سال جمع کردہ شدہ اند و

    ایک سو یا دو سو برس کے بعد جمع کی گئی ہیں اور

    فرق الاسلام فیھا یتنا زعون۔ وامّا القراٰن

    فرقہائے مسلماناں دراں ہا نزاع و جنگ مے کنند و درحقیقت در قرآن

    مسلمانوں کے فرقے ان میں لڑتے جھگڑتے ہیں اور حقیقت میں قرآن میں

    فلاشبھۃ فیہ وانّہٗ ھو الّذی نزل صدقًا و

    ہیچ شبہ نیست و ہموں بر نبی ما

    کوئی شبہ نہیں اور وہی ہمارے نبی پر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 153

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 153

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/153/mode/1up


    حقًّا علی نبیّنا، وخرج من فیہ، أأنتم فیہ

    ترتابون؟ فبأی حدیث بعدہ تؤمنون۔

    أتؤثرون الظنّ علی الذی قال اللّٰہ فی شأنہ3 ۱؂. وقالوا

    إنّا وجدنا آباء نا علی طریق وإنّا علی آثارہم

    سالکون. انظرْ کیف أقرّوا بترک القرآن، ثم

    انظر کیف یختصمون. وقالوا إن الأحادیث

    نازل شدہ و از دہان پاکش بیروں آمدہ آیا دریں

    شک مے کنید پس بر کدام حدیث بعد از قرآن ایمان مے آرید

    آیا ظن را برآں کتاب اختیار مے کنید کہ خدا تعالیٰ درشان او فرمودہ

    انا نحن نزلنا الذکر الآیۃ و مے گویند

    ما بزرگان خود را بر طریقے یافتہ ایم و ما بر نقش پائے او شاں

    خواہم رفت نگاہ بکن کہ چگونہ اقرار ترک قرآن مے کنند باز

    نگاہ بکن کہ چگونہ استیزہ مے کنند و مے گویند کہ حدیث ہا

    نازل ہواہے اور اس کے پاک منہ سے نکلا ہے کیا اس میں

    تم کو شک ہے پس کس حدیث پر قرآن کے بعد ایمان لاتے ہو۔

    کیا اس کتاب کو چھوڑ کر گمان کو اختیار کرتے ہو جس کی شان میں خدا تعالیٰ نے

    فرمایا کہ انا نحن نزلنا الذکر الآیۃ اور کہتے ہیں

    کہ ہم نے اپنے بزرگوں کو ایک راہ پر پایا ہے اور ہم ان کے نقش قدم پر

    چلیں گے دیکھ کہ کس طرح قرآن کو چھوڑنے کا اقرار کرتے ہیں پھر

    دیکھ کہ کس طرح لڑتے ہیں اور کہتے ہیں کہ حدیثیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 154

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 154

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/154/mode/1up


    قد اتفقت علٰی ما اعتقدنا، وإنْ ہم إلا یکذبون. وقد علموا أن أکثر أخبار النبی تُوافِق القرآن،

    والذی لم یوافق فقد وضعہ الواضعون. وإن العصمۃ من صفات القرآن خاصۃً، وإنّ القصص لا تجری النسخ علیہا کما أنتم تُقرّون، فأین تفرّون من حقٍّ حصحصَ، وإلامَ تجادلون؟ أرأیتم إن کنتُ من عند اللّٰہ ثم کذّبتمونی،

    بر عقاید ما اتفاق مے دارند و ایشاں دریں سخن دروغگو ہستند

    و مے دانند کہ اکثر اخبار نبی علیہ الصلوٰۃ والسلام موافق باقرآن مے باشند

    و آنچہ موافق نیست البتہ آں را واضعے وضع کردہ است و

    معصوم بودن مخصوصاً از صفات قرآن است و

    نسخ بر قصہ ہا جاری نمے شود چنانچہ خود شما اقرار مے کنید

    اکنوں از حق ثابت و واضح کجا فرار مے کنید و تاکجا جدال مے کنید

    نگاہے بکنید کہ اگر من از طرف خدا مے باشم و شما تکذیب من مے کنید

    ہمارے عقائد کی نسبت متفق علیہ ہیں اور وہ صریح اس بات میں جھوٹے ہیں اور جانتے ہیں

    کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی بہت حدیثیں قرآن سے موافق ہوتی ہیں

    اور جو موافق نہیں وہ بے شک موضوع ہے اور

    معصوم ہونا قرآن کی ہی خاص صفت ہے اور

    قصے منسوخ نہیں جیسا کہ تم کو خود اقرار ہے۔

    اب ثابت اور واضح حق سے کہاں بھاگو گے اور کب تک لڑو گے

    بھلا دیکھو تو کہ اگر میں خدا کی طرف سے ہوا اور تم میری تکذیب کرتے رہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 155

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 155

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/155/mode/1up


    فما بالکم أیّہا المکذّبون؟ وإن اللّٰہ قد أخبر عن موت المسیح فی سورۃ المائدۃ، والحدیث أخبرنا أن عمرہ ماءۃ وعشرون، وبشّرنا اللہ فی سورۃ النور بأن الخلفاء من ہذہ الأمّۃ، فکان خاتمُ الخلفاء من المسلمین بالضرورۃ، وہو المسیح الموعود من غیر الشک والشبہۃ، فقد فتح اللّہ بیننا وبینکم إن کنتم تبصرون.

    انجام شما چہ خواہد بود و ہر آئینہ خدا از

    موتِ مسیح علیہ السلام در سورہ مائدہ خبر داد و حدیث مے گوید

    کہ عمر او بیکصد و بست سال رسیدہ و نیز خدا در

    سورۃ نور مارا مژدہ بداد کہ خلفاء ازیں امت خواہند بود پس

    برہمیں طریق بالضرور خاتم الخلفا از میان مسلماناں پیدا شدہ و ہماں

    بلاریب مسیح موعود است۔ پس

    اگر بینا ہستید خدا درمیان ما و شما فیصلہ کردہ است

    تو تمہارا انجام کیا ہو گا اور خدا تعالیٰ نے مسیح علیہ السلام

    کی موت کی نسبت سورۂ مائدہ میں خبر دی ہے اور حدیث میں ہے

    کہ ان کی عمر ایک سو بیس برس کی تھی اور نیز خدا نے

    سورۃ نور میں ہم کو بشارت دی ہے کہ خلیفے اس امت سے ہوں گے پس ضرور

    اسی طریق پر خاتم الخلفاء مسلمانوں میں سے پیدا ہوا اور وہی

    بغیر کسی شک کے مسیح موعود ہے پس

    اگر تمہاری آنکھیں ہیں تو خدا نے ہمارے اور تمہارے درمیان فیصلہ کر دیا ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 156

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 156

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/156/mode/1up


    وہل بقی بعد ذالک شکّ لقوم یتّقون؟ فقد أُوتینا حجّۃ بالغۃ من اللّہ، وما فی أیدیکم إلّا الذی نحت الخاطؤن. وقالوا إن المسیح ینزل بسِمْتِ شرقی من دمشقَ وہذا ہو الحق

    إن کنتم تتفکرون. وإنّ المسیح قد ظہر

    فی الأرض الشرقیۃ کما أنّ الدّجَال قد ظہر

    فیہا، فالمسیح شرقی والدجّال شرقی، وفی

    اکنون آیا بعد ازیں ہمہ ہیچ شکے برائے پرہیزگاراں باقی ماندہ است

    ما را خدا حجت بالغہ ارزانی فرمودہ و در دستِ شما بغیر از

    تراشیدہ خطاکاراں ہیچ نیست۔ و مے گویند کہ مسیح علیہ السلام

    در طرف شرقی دمشق نازل شود وہمیں حق است

    اگر فکر کنید و ہر آئینہ مسیح

    در زمین مشرق ظاہر شدہ است چنانکہ دجال ہم در ہماں زمین

    ظاہر شدہ پس مسیح ہم شرقی است و دجال ہم شرقی است و در

    کیا اب اس سب کے بعد کوئی شک پرہیزگاروں کے لئے باقی رہ گیا ہے؟

    ہم کو خدا نے حجت بالغہ دی ہے اور تمہارے ہاتھ میں

    خطاکاروں کے گھڑے ہوئے کے سوا اور کچھ نہیں اور کہتے ہیں کہ مسیح علیہ السلام

    دمشق کے مشرق کی طرف اترے گا اور یہی ٹھیک ہے

    اگر سوچو اور مسیح

    مشرق کی زمین میں ظاہر ہوا ہے جیسا کہ دجال بھی اسی زمین

    میں ظاہر ہوا ہے پس مسیح بھی مشرق میں ہوا اور دجال بھی مشرق میں اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 157

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 157

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/157/mode/1up


    الشِّرک کثُر المشرکون. وإن قریتی ہذہ شرقیۃ من دمشقَ، فاسألوا من یعلمہا إن

    کنتم لا تعلمون. وإن ہذا المُلک مُلک الہند شرقیٌّ مِن حجاز، فتمَّ ما أومی النبی إلی المشرق للدجَّال والمسیحِ، وتم وعد اللّہ صدقًا وحقّا، فلا تحاربوا اللّٰہ أیہا المستعجلون.

    وإنکم ترون کیف تنصّرَ الناس وارتدّوا من

    شرک مشرکان افزونی و ترقی یافتہ اند و ایں دِہ ما

    بطرف شرقی دمشق واقع شدہ از عالمے بپرسید اگر

    شما خود نمی دانید و ایں ملک ہند

    از ملک حجاز بطرف مشرق واقع شدہ است۔ پس راست آمد آنچہ حضرت نبی ایماکردہ بود

    کہ دجال و مسیح در مشرق ظہور خواہند کرد و وعدہ خدا راست و حق ثابت شدہ

    پس اے شتاب کاراں باخدا جنگ نہ کنید

    شما مے بینید کہ مردم نصرانی شدہ و از دین خدا

    مشرک شرک میں بڑھ گئے اور یہ ہمارا گاؤں

    دمشق کے مشرق کی طرف ہے کسی جغرافیہ دان سے پوچھ لو اگر

    تم خود نہیں جانتے۔ اور یہ ہندوستان کا ملک

    حجاز کے ملک سے مشرق کی سمت ہے پس سچ نکلا جو آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم نے ارشاد فرمایا تھا

    کہ دجال اور مسیح مشرق میں ظاہر ہوں گے اور خدا کا وعدہ سچ اور حق ثابت ہوا

    پس اے جلد بازو! خدا کے ساتھ مت لڑو

    تم دیکھتے ہو کہ لوگ عیسائی ہو گئے اور خدا کے دین سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 158

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 158

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/158/mode/1up


    دین اللّٰہ، ثم تقولون ما جاء مرسل مِن

    عند اللّہ، ما لکم کیف تحکمون. وإن ہذہ الأرض فاقتْ کلَّ أرض بفتنہا أتعلمون کمثلہا أرضًا أُخْرٰی، فأَرُونا تلک الأرض إن کنتم تصدُقون. وقد شہدت السماء والأرض والزمان والمکان علی صدقی، ومضی من ہذہ الماءۃ قریبًا من خُمْسہا، فبأیّ شہادۃٍ بعدہا

    برگردیدہ اند باز مے گوئید کہ از طرف خدا ہیچ مرسلے

    نیامدہ ایں چہ فیصلہ می کنید و ایں

    زمین ہند در فتنہ و فساد بر

    ہمہ زمین سبقت کردہ است آیا مثل آں زمین دیگر در علم شما ہست اگر صادق

    ہستید آں زمین را بما نشان بدہید۔ و ہر آئینہ آسمان و زمین

    و زمان و مکان بر راستئ من گواہی دادہ اند و نیز

    ازیں صد قریب خمس سپری شدہ اکنوں بعد ازیں از کدام گواہی

    پھر گئے ہیں پھر کہتے ہو کہ خدا کی طرف سے کوئی رسول

    نہیں آیا یہ تمہارا کیسا فیصلہ ہے۔ اور یہ

    ہندوستان کی زمین فتنہ و فساد میں سب زمینوں سے بڑھ گئی ہے۔ کیا

    اس جیسی زمین کوئی اور تمہیں معلوم ہے؟ اگر سچے ہو تو اس زمین کا پتہ دو

    اور بے شک آسمان اور زمین

    اور زمان اور مکان نے میری سچائی پر گواہی دی ہے اور اس

    صدی میں سے قریباً پانچواں حصہ گذر بھی گیا اب اس کے بعد کون سی گواہی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 159

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 159

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/159/mode/1up


    تستیقظون؟ وقد أَرَی اللّٰہ آیاتِہ قریبًا من

    ثلاث ماءۃ، ورآہا الشہداء الذین کانوا زہاء ماءۃ ألف أو یزیدون. وإن کنتم تظنون أنہم کذبوا فأْتوا بشہداء کمثلہم کاذبین یشہدوا لکم

    إن کنتم صادقین فیما تدّعون. وإنّ نصر اللّہ أتاکم فی وقتہ فہل أنتم تردّون؟

    وإن تعُدّوا دلائل صدقی لا تحصوہا، وإن


    بیدار خواہید شد و نیز خدا قریب بہ سیصد۳۰۰ نشان ظاہر

    کردہ و ایں نشان ہا را

    زیادہ از صد ہزار مردم بچشم سر دیدہ اند و اگر او شاں را بر دروغ

    مے پندارید پس مانند اوشاں گواہاں بیارید کہ در حق شما گواہی بدہند

    اگر دریں دعوی بر راستی ہستید و یقینا

    مدد خدا در وقت بشما رسید آیا آں را ردّ مے کنید

    و اگر دلائل راستی مرا شمار بکنید نتوانید و یقینا

    تم کو جگائے گی اور نیز خدا نے تین سو نشان کے قریب ظاہر

    کر دیے اور ان نشانوں کو

    ایک لاکھ سے زیادہ آدمیوں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے اور اگر ان کو جھوٹا سمجھتے ہو

    تو ان جیسے گواہ لاؤ جو تمہارے حق میں گواہی دیں

    اگر اس دعوے میں سچ پر ہو اور یقینا

    خدا کی مدد عین وقت پر تم کو پہنچی کیا اسے رد کر دو گے۔

    اور میری سچائی کی دلیلیں اس قدر ہیں کہ تم ان کو نہیں گن سکتے اور یقینا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 160

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 160

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/160/mode/1up


    الکاذبین لا یُؤتی لہم آیۃ ولا ہم یُنصَرون.

    وإن الفاتحۃ کَفَتْ لسعیدٍ یطلب الحق ولا

    یمرّ علینا کالذین یستکبرون. فإن اللّٰہ ذکر فیہ فِرَقًا ثلا ثا خَلوا من قبلُ وہم المنعم علیہم والمغضوب علیہم والضالون، ثم جعل ہذہ الأُمّۃَ فرقۃ رابعۃً، وأومأَ الفاتحۃُ

    إلٰی أنّہم ورثوا تلک الثلا۔ ثۃ، إمّا

    کاذبان را نشانے و نصرتے دادہ نمے شود۔

    و سورۃ فاتحہ برائے سعادت مندے کہ حق مے جوید و

    از پیش ما مانند متکبرے نمے گزرد کافی است زیراکہ خدا

    دراں سورہ فرقہائے سہ گانہ را ذکر فرمودہ کہ در زمان پیشین گذشتند و

    اوشاں منعم علیہم و مغضوب علیہم و ضالین ہستند

    باز ایں امت را فرقہ چہارم قرار دادہ و در فاتحہ

    ایما کردہ کہ اوشاں ازیں فرقہائے سہ گانہ یا وارث

    جھوٹوں کو کوئی نشان اور کوئی مدد نہیں دی جاتی۔

    اور فاتحہ کی سورۃ اس سعادت مند کے لئے جو حق تلاش کرتا ہے اور

    ہمارے سامنے سے متکبر کی طرح نہیں گذرتا کافی ہے کیونکہ خدا نے

    اس سورۃ میں تین فرقوں کا ذکر کیا ہے جو اگلے زمانہ میں گذرے اور وہ

    یہ ہیں منعم علیہم اور مغضوب علیہم اور ضالین۔

    پھر اس امت کو چوتھا فرقہ قرار دیا اور فاتحہ

    میں اشارہ کیا کہ وہ ان تین فرقوں میں سے یا تو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 161

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 161

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/161/mode/1up


    من المنعَم علیہم، أو من المغضوب علیہم، أو من الذین یضلّون ویتنصّرون، وأمَر أن یسأل المسلمون ربّہم أن یجعلہم من الفرقۃ الأولی ولا یجعلہم من الذین غضب علیہم ولا من الضالین الذین یعبدون عیسی وبربّہم یشرکون. وکان فی ہذا أنباءٌ ثلاث لقوم یتفرّسون.

    فلمّا جاء وقت ہذہ الأنباء بدأ اللّٰہ من

    منعم علیہم خواہند بود یا وارث مغضوب علیہم یا

    وارث ضالین خواہند گردید۔ و امر فرمودہ کہ

    مسلمانان از رب خویش بخواہند کہ اوشاں را از فرقہ اول بگرداند

    و از مغضوب علیہم و ضالین

    کہ عیسیٰ را مے پرستند و با پروردگار خود شریک مے سازند نہ گرداند

    و دریں سہ گانہ پیشگوئی ہا است برائے آنانکہ از فراست کار گیرند

    پس ہر گاہ وقت ایں پیشگوئی ہا بیامد خدا از ضالین

    منعم علیہم کے وارث ہوں گے یا مغضوب علیہم کے وارث ہوں گے یا

    ضالین کے وارث ہوں گے اور حکم دیا ہے کہ

    مسلمان اپنے رب سے چاہیں کہ ان کو پہلے فرقہ میں سے بناوے

    اور مغضوب علیہم اور ضالین میں سے نہ بناوے

    جو عیسیٰ کو پوجتے ہیں اور اپنے پروردگار کے برابر بناتے ہیں

    اور ان کے لئے جو فراست سے کام لیتے ہیں اس میں تین پیشگوئیاں ہیں

    پس جب ان پیشگوئیوں کا وقت پہنچ گیا خدا نے ضالین سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 162

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 162

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/162/mode/1up


    الضالین کما أنتم تنظرون، فخرج النصارٰی

    من دَیْرہم بقوّۃ لا یدانِ لہا وہم من کلّ حدَبٍ ینسلون، وزُلزلت الأرض زلزالہا وأخرجت أثقالہا، وتنصّرَ فوج من المسلمین کما أنتم تشاہدون. ثم جاء وقت النبأ الثانی.. أعنی

    وقت خروج المغضوب علیہم کما کان

    الوعد الربّانی، فصار طائفۃ من

    آغاز فرمود چنانکہ شما مے بینید۔ پس نصارٰی

    از کنشتہائے خود بآں قوت خروج کردہ اند کہ ہیچ کس را دست برابری باوشاں نیست و او شاں

    از بالائے ہر بلندی مے شتابند و زمین در جنبیدن آمد

    و ہمہ بارہائے خود را بروں داد و بسیارے از مسلماناں نصرانی شدند

    باز وقت خبر دوم آمد

    یعنی وقت خروج مغضوب علیہم

    چنانکہ خدا وعدہ فرمودہ بود پس گروہے از

    شروع کیا جیسا کہ تم دیکھتے ہو پس نصارٰی

    ایسی قوت کے ساتھ اپنے گرجاؤں سے نکلے ہیں کہ کوئی ان کی برابری نہیں کر سکتا۔ اور وہ ہر ایک

    اونچائی پر سے دوڑتے ہیں اور زمین ہلنے لگی

    اور اپنے سب بوجھ اُگل دیے اور مسلمانوں میں سے بہت سے نصرانی ہو گئے

    پھر دوسری خبر کا وقت پہنچا

    یعنی مغضوب علیہم کے نکلنے کا وقت

    جیسا کہ خدا نے وعدہ فرمایا تھا پس مسلمانوں کے ایک گروہ نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 163

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 163

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/163/mode/1up


    المسلمین علی سیرۃ الیہود الذین غضب اللہ علیہم، وصارت أہواؤہم کأہواۂم وآراؤہم کآراۂم وریاؤہم کریاۂم وشحناؤہم کشحناۂم وإباؤہم کإباۂم یکذبون ویفسقون، ویظلمون ویستکبرون، ویحبّون أن یسفکوا الدماء بغیر حق ومُلِئتْ نفوسہم شُحًّا وبخلًا وحسدًا، وضُرِبت علیہم الذلّۃ فہم لا یُکرَمون فی السّماء

    مسلماناں رفتار و نمونۂ یہود اختیار کردند کہ مورد غضب الٰہی بودند

    و در ہوا

    و ریا و کینہ و دشمنی و سرکشی مانند ایشاں گردیدند

    ہم چناں دروغ مے گویند و تبہ کاری مے کنند و بے داد

    و تکبر می ورزند و خون ناحق ریختن را دوست مے دارند

    و نفسہائے اوشاں از آز و بخل و حسد پُر شدہ

    و بر ایشاں ذلت وارد شدہ چنانکہ نہ در آسمان عزت می یابند

    یہودیوں کی راہ اور نمونہ اختیار کر لیا جو خدا کے غضب کے نیچے تھے

    اور ان کی خواہشیں

    اور ریا اور کینہ اور دشمنی اور سرکشی بالکل ان جیسی ہو گئی

    جھوٹ بولتے ہیں اور تبہ کاری کرتے ہیں اور ظلم

    اور تکبر کرتے ہیں اور ناحق خون کرنے کو دوست رکھتے ہیں

    اور ان کے نفس حرص اور طمع اور بخل اور حسد سے بھر گئے ہیں

    اور وہ ذلیل ہو گئے ہیں نہ آسمان میں ان کی عزت ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 164

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 164

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/164/mode/1up


    ولا فی الأرض، ومِن کل باب یُطرَدون. وکذالک مُلئت الأرض ظلما وجورًا وقَلّ الصالحون. فنظر اللّہ إلی الأرض فوجد أہلہا فی ظلمات ثلاث: ظلمت الجہل وظلمت الفسق وظلمت الدّاعین إلی التثلیث والوسواس الخنّاس، فتذکّرَ فضلًا ورُحمًا وعْدہ الثالث الذی یدعون لہ الداعون، فأنعمَ علی ہذہ الأُمّۃ

    و نہ در زمین و از ہر راہ راندہ مے شوند و ہمچنیں

    زمین از ستم و بے داد پُر شدہ و نیکوکاران کم گردیدند

    دریں حال خدا بسوئے زمین نگہ کرد و اہل زمین را در سہ گونہ تاریکی ہا

    یافت تاریکی جہل و تاریکی فسق

    و آنکساں کہ بسوئے تثلیث و شیطان مردم را مے خوانند

    پس از فضل و رحم وعدہ سوم را یاد کرد کہ برائے آں

    دعا گویاں دعا مے کردند پس از فرستادن مثیل عیسیٰ

    اور نہ زمین میں اور ہر ایک طرف سے دھتکارے جاتے ہیں اور اسی طرح

    زمین ظلم اور جور سے بھر گئی اور نیک لوگ کم ہو گئے

    ایسے وقت میں خدانے زمین کو دیکھا اور زمین والوں کو تین طرح کی تاریکی میں

    پایا ایک جہالت کا اندھیرا دوسرے فسق کا اندھیرا تیسرے ان لوگوں کا

    اندھیرا جو تثلیث اور شیطان کی طرف لوگوں کو بلاتے ہیں

    پس فضل اور رحم کر کے تیسرے وعدہ کو یاد کیا جس کے لئے

    دعا کرنے والے دعا کرتے تھے پس مثیل عیسیٰ کو بھیجنے سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 165

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 165

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/165/mode/1up


    بإرسال مثیل عیسٰی، وہل یُنکِر إلّا العمون؟ وإن الذین آمنوا بأنباء القرآن ومواعیدہ وکفروا بما خالفہا، أولئک ہم المؤمنون حقّا، وأولئک الذین ہدی اللّہ قلوبہم، وأولئک ہم المہتدون. وما نبیُّنا إلا محمدؐ، وما کتابنا إلا القرآن، فاطلبوا الرشد منہ أیہا المسترشدون. وإنا عُلّمنا دعوۃً فی الفاتحۃ، واستجابَہا اللّہ

    بریں امت انعام کرد و برایں جز نابینایاں کسے انکار نمے کند

    و آناں کہ ایمان بر خبر ہائے قرآن و وعدہ ہایش آوردند و

    مخالف آنرا انکار کردند مومناں درست ہموں ہستند

    و ہمانند کہ خدا دل او شاں را ہدایت بخشید وہمان

    ہدایت یافتگانند و نبیء ما بغیر محمد صلی اللہ علیہ و سلم و کتاب ما

    بغیر قرآن نیست اے طالبان رشد از وے رشد طلب بکنید

    و ما را در فاتحہ دعائے آموختند و آں دعا را خداوند تعالیٰ شانہ

    اس امت پر انعام کیا اور اس پر اندھوں کے سوا اور کوئی انکار نہیں کرتا

    اور وہ لوگ جو قرآن شریف کی خبروں اور اس کے وعدوں پر ایمان لائے

    اور جو اس کے خلاف تھا اس سے انکار کیا ٹھیک مومن یہی ہیں

    اور یہی وہ ہیں جن کے دلوں کو خدا نے ہدایت دی اور یہی

    ہدایت پائے ہوئے ہیں اور محمد صلی اللہ علیہ و سلم کے بغیر ہمارا اور کوئی نبی نہیں اور قرآن کے

    سوا ہماری اور کوئی کتاب نہیں۔ اے رشد کے طالبو! اس سے رشد طلب کرو

    اور ہم کو فاتحہ میں دعا سکھائی گئی ہے اور اس دعا کو خدا تعالیٰ نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 166

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 166

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/166/mode/1up


    فی سورۃ النور، فما لکم تترکون لُبَّ القرآن وعلی القشر تقنعون. ولا غُمّۃَ فی مواعید القرآن بل ہو بیان واضح لقوم یفہمون۔

    فما لکم ترُدّون نِعمَ اللّہ بعد نزولہا؟ ءَ أَنتم

    نَعَمٌ أو أُناس عاقلون؟ وما قصّ اللّہ علینا

    الفِرَقَ الثلاث فی الفاتحۃ إلّا لیشیر إلی أن

    ہذہ الأمّۃ ورثتْہم فی کل قسم من الأقسام

    در سورۃ النور قبول فرمود پس چرا مغز قرآن را مے گذارید و

    بر پوست قناعت می کنید در وعدہ ہائے قرآن ہیچ پوشیدگی نیست

    بلکہ آں بیان واضح است برائے آناں کہ مے فہمند

    چہ شد کہ نعمت ہائے خدا را بعد نزول آں رد مے کنید آیا بہایم

    ہستید یا انسان دانشمند۔ و خدا در فاتحہ فرقہ ہائے

    سہ گانہ را بجہت آں بیان کرد کہ اشارہ کند بسوئے اینکہ

    ایں امت ہر قسمے را از اقسام مذکورہ وارث خواہد شد

    سورۃ نور میں قبول فرمایا پس کیوں قرآن کے مغز کو چھوڑتے ہو اور

    چھلکے پر قناعت کرتے ہو۔ قرآن کے وعدوں میں کوئی پوشیدگی نہیں

    بلکہ کھلا بیان ہے ان لوگوں کے لئے جو سمجھتے ہیں

    تمہیں کیا ہوا کہ خدا کی نعمتوں کو ان کے نازل ہونے کے بعد رد کرتے ہو۔ کیا

    حیوان ہو یا عقل والے انسان اور خدا نے فاتحہ میں تین فرقوں کا

    اس لئے ذکر کیا ہے کہ تا اس بات کی طرف اشارہ ہو کہ

    یہ امت مذکورہ قسموں میں سے ہر ایک قسم کی وارث ہو گی۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 167

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 167

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/167/mode/1up


    المذکورۃ، فقد ظہرتْ ہذہ الوراثۃ فی مُسْلمِی زماننا الذی ہو آخر الزمان بظہور تام، تعرفہا کل نفسٍ من غیر الحاجۃ إلی الإمعان کما لا یخفی علی الذین ینظرون إلی مُسْلمی زمننا ہذا وإلٰی ما یعملون. ولکل فرقۃ من ہذہ الورثاء الثلاث درجاتٌ ثلاث.. أما الذین ورِثوا المنعَمَ علیہم فمنہم رجال ما وجدوا حظَّہم من الإنعام

    پس بہ تحقیق ایں وراثت در مسلمانانِ زمانۂ ما

    کہ آخری زمانہ ہست بچناں ظہور تام ظاہر شدہ است کہ

    ہر نفسے بغیر حاجت فکر آں را مے شناسد چنانچہ ایں امر

    بر آنکساں پوشیدہ نیست کہ درمسلمانان زمانہ ما و کار ہائے اوشاں نظر مے کنند

    و برائے ہر فرقہ و امر ایں ہر سہ۳ ورثاء ثلاثہ

    سہ۳ درجہ اند۔ اما آناں کہ وارثان منعم علیہم شدند

    بعضے ازیشاں از انعام بہرۂ نیافتند

    پس بلا شبہ یہ وراثت

    ہمارے زمانہ میں جو آخری زمانہ ہے ایسی ظہور تام سے مسلمانوں میں ظاہر ہو گئی ہے کہ ہر یک نفس بغیر حاجت فکر کے اس کو پہچان رہا ہے۔ چنانچہ یہ بات ان لوگوں پر

    مخفی نہیں جو ہمارے زمانہ کے مسلمانوں اور ان کے کاموں کی طرف نظر کرتے ہیں

    اور ان تینوں قسم کے وارثوں میں سے ہر یک فرقۂ وارثہ کے

    تین درجے ہیں لیکن جو منعم علیہم کے وارث ہوئے

    ان میں سے بعضوں نے انعام سے حصہ نہ پایا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 168

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 168

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/168/mode/1up


    إلا قلیلا من العقائد أو الأحکام وہم علیہ یقنعون، ومنہم مقتصدون وإنہم وقَفوا علی مرتبۃ الاقتصاد وما یکمَّلون، ومنہم فردٌ

    اجتباہ ربّہ وکمّلہ وجعلہ سابقا فی الخیرات، وہو یجتبی الیہ من یشآء ویخص بالدرجات، فذالک المخصوص ہو المسیح الموعود الذی ظہر فی القوم وہم لا یعرفون۔وَ اَمَّا

    بجز اند کے از عقائد و احکام و بر ہماں قناعت کردند

    و بعضے از ایشاں میانہ ور ہستند کہ بر ہماں طریق میانہ روی

    بایستادند و بمرتبۂ تکمیل و کمال نہ رسیدند و از جملہ ایشاں

    یک فردست کہ خدا او را برگزید و کامل ساخت و درنیکی ہا او را مرتبہ سبقت بخشید

    و او مے گزیند ہر کہ را مے خواہد و بدرجہا مخصوص

    مے گزراند پس آں مخصوص ہموں مسیح موعود است

    کہ دریں قوم ظاہر شدہ و ایشاں نمے شناسند و اما

    مگر تھوڑا سا حصہ عقائد اور احکام میں سے ان کو ملا اور اسی پر انہوں نے

    قناعت کی اور بعض ان میں سے درمیانی چال والے ہیں اور وہ اسی اپنی چال پر

    کھڑے ہو گئے اور تکمیل اور کمال کے درجے تک نہیں پہنچے اور ان میں سے ایک فرد ہے کہ خدا نے اس کو چنا اور امام بنایا اور نیکیوں میں کامل کیا

    اور وہ چن لیتا ہے جس کو چاہتا ہے اور درجوں سے مخصوص

    کرتا ہے پس وہی مخصوص وہی مسیح موعود ہے

    جو اس قوم میں ظاہر ہوا اور وہ نہیں پہچانتے اور لیکن



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 169

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 169

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/169/mode/1up


    الذین ورثوا المغضوب علیہم من الیہود

    فمنہم رجال من المسلمین شابہوہم فی

    ترک الفرائض والحدود، لا یصومون ولا یصلّون، ولا یذکرون الموت ولا یبالون،

    ومنہم قوم اتخذوا الدنیا معبودہم ولہا

    فی لیلہم ونہارہم یعملون، ومنہم سابقون

    فی الرزائل، وأولئک الذین یتخذون أہل الحق

    آناں کہ وارثان مغضوب علیہم شدند

    بعضے از ایشاں آں مسلماناں ہستند

    کہ در ترک فرائض و احکامِ خدا مشابہت بایہود پیدا کردند نماز نمی گزارند و روزہ

    بجا نمے آرند و موت را یاد ندارند و ہیچ باکے از خدا ندارند۔

    و از جملہ اوشاں مردمے ہستند کہ دنیا را معبود گرفتہ و

    روز و شب برائے آں کار مے کنند و از جملہ او شاں کسانے ہستند

    کہ درخصلتہائے پست و کمینہ برہمہ بیشی جستہ اند۔ ہمیں مردم اند کہ بر اہل حق ریشخند

    جو مغضوب علیہم کے وارث ہوئے

    ان میں سے وہ مسلمان ہیں جو خدا کے احکام اور

    فرائض کے ترک کرنے میں یہود سے مشابہ ہو گئے۔ نہ نماز پڑھتے ہیں نہ روزہ

    رکھتے ہیں اور یہ موت کو یاد نہیں کرتے اور بے خوف ہیں

    اور ان میں سے ایسے لوگ بھی ہیں جنہوں نے دنیا کو اپنا معبود بنایا اور

    رات دن اسی کے لئے کام کرتے ہیں۔ یہ اور ان میں سے ایسے لوگ ہیں کہ

    کمینی اور رذیل خصلتوں میں سب سے بڑھ گئے۔ یہی لوگ ہیں جو اہل حق پر ٹھٹھے مارتے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 170

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 170

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/170/mode/1up


    سُخریًّا وعلیہم یضحکون. ویعادونہم ویکفّرونہم ویشتمونہم، ویعملون ریاءً وبطرًا ولا یخلصون. ویصولون علی مسیح اللّہ وحزبہ، ویجرّونہم إلی الحکام وفی کل طریق یقعدون، ویقولون اقتلوہم فإنہم کافرون.

    وإذا قیل لہم تعالوا إلی کلام اللّہ واجعلوہ

    حَکَمًا بیننا وبینکم تری أعینہم تَحمرّ

    مے کنند و او شاں را دشمن مے دارند

    و دشنام مے دہند و کارہائے ریا و نمود مے کنند

    و اخلاص ندارند و بر مسیح خدا

    و گروہ او حملہ مے کنند۔ و بسوئے حکام اوشاں را مے کشند و برسر ہر راہ برائے آزار اوشاں

    مے نشینند و مے گویند او شاں را بکشید کہ کافر ہستند

    و ہر گاہ بدیشاں بگوئیم کہ بسوئے کلام خدا بیائید و او را میان ما

    و شما حکم بگردانید چشمانِ شاں از شدتِ خشم خون آلودہ

    اور ان سے دشمنی کرتے ہیں

    اور گالیاں دیتے ہیں اور ریا اور دکھلاوے کے کام کرتے ہیں

    اور اخلاص نہیں رکھتے اور خدا کے مسیح پر اور اس کے

    گروہ پر حملہ کرتے ہیں اور ان کو حاکموں کی طرف کھینچتے ہیں اور ہر ایک راستے کے سرے پر ان کے

    ستانے کے لئے بیٹھتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ان کو مار ڈالو کیونکہ یہ کافر ہیں

    اور جس وقت ان کو کہیں کہ خدا کے کلام کی طرف آؤ اور اس کو

    ہمارے اور اپنے درمیان حکم بناؤ تو ان کی آنکھیں غصہ سے لال



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 171

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 171

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/171/mode/1up


    من الغیظ ویمرّون شاتمین وہم مشتعلون. وکأیّنْ مِن آیِ اللّہ رأوہا بأعینہم ثم

    یمرّون مستکبرین کأنہم لا یبصرون.

    ونبذوا کتاب اللّہ وراء ظہورہم ظلمًا وعُلوًّا، وقالوا لا تسمعوا دلائلہ والغَوْا فیہا لعلکم تغلبون۔ وأمّا الذین ورثوا الضالین فمنہم

    قوم أحبّوا شِعار النصاری وسیرتہم وإلیہا

    می شوند و دشنام بر زبان مے گزرند

    بسیارے از نشان ہائے خدا را بچشم دیدند باز

    تکبر کناں مے گزرند کہ گوئی بینا نیستند

    کتاب خدا را در پس پشت انداختہ اند

    و می گویند دلائل آن را گوش نہ کنید و در وقت خواندنش غوغا برپا بکنید تا

    غالب بشوید و اما آناں کہ وارثان ضالین شدند بعض از و شاں

    شعار نصاری و سیرت ایشاں را دوست داشتند و بداں

    ہو جاتی ہیں اور گالیاں دیتے گذر جاتے ہیں

    بہتوں نے خدا کے نشانوں کو آنکھوں سے دیکھا پھر

    متکبرانہ گذر جاتے ہیں گویا اندھے ہیں۔

    خدا کی کتاب کو پیٹھ پیچھے ڈال دیا ہے

    اور کہتے ہیں کہ اس کی دلیلوں کو نہ سنو اور اس کے پڑھنے کے وقت شور ڈال دو تا

    غالب ہو جاؤ لیکن جو ضالین کے وارث ہوئے ان میں سے بعض

    نصاریٰ کی خو خصلت اور شعار کو دوست رکھتے ہیں اور اس طرف



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 172

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 172

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/172/mode/1up


    یمیلون. وتجدہم یرغبون فی حُللہم وقُمصانہم وقلانسہم ونعالہم وطَرْزِ معیشتہم وجمیع خصالہم، وعلی من خالفہا یضحکون ویتزوّجون نساءً من قومہم وعلیہن یعشقون. ومنہم قوم مالوا إلی الفلسفۃ التی أشاعوہا وفی أمر الدین یتساہلون. وکم من کَلِمٍ تخرج من أفواہہم، ویحقّرون دین اللّہ ولا یبالون.

    میل آوردند در لباس و

    قمیص و کلاہ و کفش و طرزِ زندگی و

    ہمہ عادت ہا تقلید نصاریٰ مے کنند و بر مخالفان ایں عادات خندہ مے زنند و

    زنانِ نصاریٰ را در عقد زوجیت مے کشند و با اوشاں عشق مے بازند

    و بعضے ازیشاں میل بسوئے فلسفۂ نصاریٰ آوردند کہ دریں بلاد اشاعت کردہ اند

    و در امور دین غفلت و سہل انگاری مے کنند۔ اے بسا سخنانِ نا سزا کہ از لب

    و دہانِ ایشاں بروں مے آید و تحقیر دین خدا مے کنند و باک ندارند

    جھک گئے۔ لباس

    کوٹ پتلون بوٹ اور طرز زندگی اور

    ساری عادتوں میں نصاریٰ کی نقل اتارتے ہیں اور ان عادتوں کے مخالفوں پر ہنستے ہیں اور

    نصارٰی کی عورتوں کو اپنے نکاح میں لاتے ہیں اور ان سے عشق بازیاں کرتے ہیں۔

    اور ان میں سے کئی نصاریٰ کے فلسفے کی طرف متوجہ ہوئے جس کی ان شہروں میں انہوں نے اشاعت

    کی ہے اور دین کے کاموں میں غفلت کرتے ہیں۔ بہت ہی نا مناسب باتیں بولتے ہیں

    اور خدا کے دین کی حقارت کرتے ہیں اور خوف نہیں کرتے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 173

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 173

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/173/mode/1up


    ومنہم قوم أکملوا أمر الضلالۃ، وارتدّوا من الإسلام وعادَوہ من الجہالۃ، وکتبوا کتبًا فی ردّہ، وشتموا رسول اللّہ وصالوا علی عرضہ، وتلک أفواجٌ فی ہذا المُلک بعدما کانوا یُسلِمون. فتمّ ما أُشیرَ إلیہ فی الفاتحۃ، فإنّا للہ وإنّا إلیہ راجعون۔ وأوّلُ نبأ ظہَر من أنباءِ أُمّ الکتاب ہو تنصُّر المسلمین وشتمہم وصَولہم

    و بعضے ازوشاں امر گمراہی را بر کمال رسانیدند و از اسلام برگشتند

    و از نادانی اسلام را دشمن داشتند و در رد اسلام کتابہا نوشتند

    و رسول خدا را بد گفتند و بر آبروئے وے بتاختند

    و ازیں قسم مردم دریں ملک فوج فوج ہستند و ایشاں قبل ازیں مسلمان بودند۔

    پس آنچہ در سورہ فاتحہ اشارت بآں رفتہ بود بظہور و وقوع آمد فانا للّٰہ و انّا الیہ راجعون

    و اول خبرے کہ از اخبار ام الکتاب بظہور آمد

    آں نصرانی شدن مسلماناں و دشنام دادن اوشاں و

    اور بعض ان میں سے پکے گمراہ ہو گئے

    اور جہالت سے اسلام کے ساتھ دشمنی کرتے ہیں اور اسلام کے رد میں کتابیں لکھیں

    اور خدا کے رسول کو برا کہا اور اس کی عزت پر حملہ کیا اور اس قسم کے لوگ اس ملک میں کثرت سے ہیں اور وہ اس سے پہلے مسلمان تھے۔

    پس جس بات کا سورۃ فاتحہ میں اشارہ تھا وہ ظاہر ہو گئی۔ انا للّٰہ و انّا الیہ راجعون

    اور پہلی خبر جو ام الکتاب کی خبروں سے ظاہر ہوئی

    وہ مسلمانوں کا نصرانی ہو جانا اور ان کا گالیاں دینا اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 174

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 174

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/174/mode/1up


    کالکلاب کما تشاہدون. ثم ظہر نبأ المغضوب علیہم، فتری حزبًا من العلماء ومَن تبعہم من أہل الدنیا والأمراء والفقراء کیف یستکبرون ولا یتذلّلون، ویراء ون ولا یخلصون، ویقولون ما لا یفعلون۔وأخلدوا إلی الأرض وإلی اللّہ لا یتوجہون۔ولا یؤمنون بأیّام اللّہ، ویرون آیات اللّہ ثم ینکرون ویریدون أن یدُسّوا

    مانند سگاں حملہ کردن اوشان است چنانکہ مے بینید باز خبر مغضوب علیہم ظاہر شد

    چنانچہ شما گروہے از علماء و تابعان ایشاں را از

    اہل دنیا و امرا و فقرا مے بینید کہ چہ قدر تکبر مے کنند

    و فروتنی نمے ورزند و ریا مے کنند و اخلاص ندارند و مے گویند

    آنچہ نہ می کنند۔ بر دنیا سرنگوں شدہ اند و بسوئے خدا

    رو نمے آرند و بہ روز ہائے خدا ایمان ندارند و

    نشانہائے خدا را می بینند و سر باز مے زنند و می خواہند کہ حق را

    کتوں کی طرح حملہ کرنا ہے۔ جیسا کہ دیکھتے ہو۔ پھر مغضوب علیہم کی خبر ظاہر ہوئی

    جیسا کہ تم علماء کے گروہ اور ان کے تابعوں

    اور اہل دنیا اور امیروں اور پیروں اور فقیروں اور درویشوں میں دیکھتے ہو کہ کس قدر تکبر

    کرتے ہیں خاکساری اختیار نہیں کرتے۔ ریا کرتے ہیں اخلاص نہیں رکھتے۔ اور وہ ایسی باتیں بتاتے ہیں

    جو خود نہیں کرتے دنیا پر اوندھے پڑے ہیں اور خدا کی طرف

    متوجہ نہیں ہوتے اور خدا کے دنوں پر ایمان نہیں لاتے اور خدا کے

    نشانوں کو دیکھتے ہیں اور سر پھیرتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ حق کو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 175

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 175

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/175/mode/1up


    الحق فی تراب، ویمزّقوا أذیالہ ککلاب، ولا یفکّرون فی لیلہم ولا نہارہم أنہم یُسْألون۔ولو تیسّرَ لہم قتلی لقتلونی ولاغتالونی لو یُسرّون مقتلی، ولکن اللّہ خیّبہم فیما یقصدون۔ یمکرون کل مکرٍ لإعدامی، فینزل أمرٌ من السماء فیجعل مکرہم ہباءً وہم لا یعلمون۔ وإنّ معی قادرٌ لا یبرح مکانی حَفَظَتُہ، ولا یبعُد منی طرفۃَ عینٍ

    زیر خاک پنہاں کنند و دامن آنرا چوں سگان پارہ پارہ کنند و در

    روز و شب خویش فکر نمے کنند کہ آخر پرسیدہ خواہند شد۔ اگر مرا کشتن

    مے توانستند البتہ مے کشتند

    لیکن خدا اوشان را ناکام و نامراد گردانید برائے نابود کردن من مکر ہا درکار

    مے کنند دریں اثنا امرے از آسمان پیدا مے شود کہ

    مکر اوشاں را برباد مے دہد و اوشاں نمے دانند بامن قادریست

    کہ پاسبانان او از مکان من دور نمی شوند و رحمتش مرا بیک چشم زدن

    خاک کے نیچے چھپا دیں اور اس کے دامن کو کتوں کی طرح ٹکڑے ٹکڑے کر دیں اور اپنے

    رات اور دن میں فکر نہیں کرتے کہ آخر پوچھے جائیں گے اگر مجھ کو قتل

    کر سکتے تو ضرور قتل کرتے۔

    لیکن خدا نے ان کو ناکام اور نا مراد رکھا میرے نابود کرنے میں

    مکر کام میں لاتے ہیں تب آسمان سے ایک ایسا امر نازل ہوتا ہے کہ ان کے

    مکر کو برباد کر دیتا ہے اور وہ نہیں جانتے میرے ساتھ ایک ایسا قادر ہے

    کہ اس کے نگہبان میرے گھر سے دور نہیں ہوتے اور اس کی رحمت ایک لمحہ بھی مجھ کو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 176

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 176

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/176/mode/1up


    رَحْمتُہ، لکن المخالفین لا یبصرون، بل یروننی ویعبِسون ویسبّون ویشتمون، ویحلفون حلفًا علی حلف إنہ کاذب ولا یبقی سرٌّ إلا یُبدَی، ولا قضیۃ إلّا تُقضَی، فسیظہر ما فی قلبی وما فی قلبہم، ولا یُکتَم ما یکتُمون۔ہذان حزبان من المغضوب علیہم وأہل الصلبان ذکَرہما اللّہ فی الفاتحۃ، وأشار إلٰی أنہما یکثُران فی

    فرو نمے گزارد و لیکن مخالفان نمے بینند بلکہ مرا می بینند

    و سر کہ بر ابرو مے مالند و دشنام می دہند و سو گند بر سوگند

    مے خورند کہ من کاذب ہستم و ہیچ رازے نماند کہ ظاہر نہ شود و

    ہیچ قضیہ کہ فیصلہ نہ شود۔ قریب است کہ آنچہ در دل من است و آنچہ اوشاں

    در دل دارند آشکار بشود ایں دو گروہ از

    مغضوب علیہم و اہل صلیب ہستند کہ خدا

    در فاتحہ ذکر ایشاں فرمودہ و اشارت کردہ کہ در آخر زمان اوشاں را

    نہیں چھوڑتی لیکن مخالف نہیں دیکھتے بلکہ مجھ کو دیکھتے ہیں

    اور چیں بہ جبیں ہوتے ہیں اور گالیاں دیتے ہیں اور قسم پر قسم

    کھاتے ہیں کہ میں جھوٹا ہوں اور ایسا کوئی بھید نہیں رہا جو ظاہر نہ ہو اور

    نہ کوئی قضیہ جو فیصلہ نہ ہو۔ قریب ہے کہ جو کچھ میرے دل میں ہے اور جو کچھ ان کے

    دل میں ہے ظاہر ہو جائے۔ یہ دو گروہ

    مغضوب علیہم اور اہل صلیب میں سے ہیں کہ خدا نے

    فاتحہ میں ان کا ذکر کیا ہے اور اشارہ کیا ہے کہ آخر زمانہ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 177

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 177

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/177/mode/1up


    آخر الزمان ویبلغان کمالہما فی الطغیان، ثم یقیم ربُّ السماء حزبًا ثالثا فی تلک الأوان لتتمّ المشابہۃ بأُمّۃ أولی ولِتتشابہَ السلسلتان. فالزمانُ ہٰذا الزمانُ، وتمّ کلّ ما وعد الرحمٰن، ورأیتم المتنصّرین من المسلمین وکثرتہم، ورأیتم یہودَ ہذہ الأمّۃ وسیرتہم، فکان خالیًا موضعُ لَبِنۃٍ أعنی المُنعَم علیہ من ہذہ العمارۃِ..

    کثرت دست بدہد و در فساد بر کمال برسند دریں اثنا

    پروردگار آسمان گروہے سوم را قائم کند برائے آنکہ

    مشابہت باامت اول تمام شود و نیز بجہت آنکہ ہر دو سلسلہ باہم دگر مشابہ بگردند

    پس آں وقت ہمیں وقت است و آنچہ رحمن وعدہ فرمودہ بود ہماں بظہور رسیدہ و شما

    کثرت نصرانی شوندگان را از میان مسلماناں بدیدید و نیز یہود ایں امت

    و سیرت ایشاں را ہم ملاحظہ کردید و درایں عمارت جائے یک خشت

    خالی بود یعنی منعم علیہم

    بکثرت ہو جائیں گے اور فساد میں کمال کو پہنچ جائیں گے اس وقت

    آسمان کا پروردگار تیسرے گروہ کو قائم کرے گا اس لئے کہ

    مشابہت پہلی امت سے پوری ہو جائے اور اس لئے بھی کہ دونوں سلسلے ایک دوسرے سے مشابہ ہو جائیں۔

    پس وہ وقت یہی وقت ہے اور جو کچھ رحمن نے وعدہ کیا تھا وہی ظاہر ہوا اور تم نے

    مسلمانوں میں سے عیسائی ہونے والوں کی کثرت کو دیکھا اور اس امت کے یہود

    اور ان کی سیرت کو بھی دیکھا اور اس عمارت میں

    ایک اینٹ کی جگہ خالی تھی یعنی منعم علیہم



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 178

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 178

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/178/mode/1up


    فأراد اللّہ أن یُتمّ النبأ ویُکمِل البناء باللبنۃ الأخیرۃ، فأنا تلک اللبنۃ أیہا الناظرون. وکان عیسٰی عَلَمًا لبنی إسرائیل وأنا عَلَمٌ لکم أیہا المفرطون. فسارِعوا إلی التوبۃ أیہا الغافلون. وإنّی جُعِلْتُ فردًا أکمَلَ من الذین أُنعِمَ علیہم فی آخر الزمان، ولا فخر ولا ریاء ، واللّہُ فعَل کیف أراد وشاء ، فہل أنتم تحاربون اللّہ وتزاحمون.

    پس خدا ارادہ کرد کہ پیشگوئی را بکمال رساند و بخشت آخری بنا را

    تمام کند۔ پس من ہماں خشت ہستم و چنانچہ

    عیسیٰ نشانے برائے بنی اسرائیل بود ہمچناں من برائے شما اے تبہ کاران

    یک نشان ہستم پس اے غافلان بسوئے توبہ بشتابید

    و من از گروہ منعم علیہم فرد اکمل کردہ شدم

    و ایں از فخر و ریا نیست و خدا چنانکہ

    خواست کرد پس آیا شما باخدا جنگ و پیکار مے کنید

    پس خدا نے ارادہ فرمایا کہ اس پیشگوئی کو پورا کرے اور آخری اینٹ کے ساتھ

    بنا کو کمال تک پہنچا دے۔ پس میں وہی اینٹ ہوں اور

    جیسا کہ عیسیٰ بنی اسرائیل کے لئے نشان تھا ایسا ہی میں تمہارے لئے اے تبہ کارو

    ایک نشان ہوں۔ پس اے غافلو! توبہ کی طرف جلدی کرو۔

    اور میں منعم علیہم گروہ میں سے فرد اکمل کیا گیا ہوں

    اور یہ فخر اور ریا نہیں۔ خدا نے جیسا

    چاہا کیا۔ پس کیا تم خدا کے ساتھ لڑتے ہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 179

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 179

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/179/mode/1up


    وأنا المسیح الموعود الذی قُدّر مجیءُہ فی آخر الزمان من اللّہ الحکیم الدیّان، وأنا المنعَم علیہ الذی أُشیرَ إلیہ فی الفاتحۃ عند ظہور الحزبین المذکورین وشیوع البدعات والفتن فہل

    أنتم تقبلون؟ وإن إنکاری حسراتٌ علی الذین کفروا بی، وإن إقراری برکاتٌ للذین

    یترکون الحسد ویؤمنون. ولو کان ہذا الأمر

    و من ہماں مسیح موعود ہستم کہ آمدنش در آخر زمان

    از طرف خدا مقدر بود و من

    آں منعم علیہ ہستم کہ بسوئے او در فاتحہ وقت ظہور آں

    دو گروہ اشارت رفتہ و پراگندہ شدن بدعات و فتنہ ہا

    پس آیا شما قبول مے کنید۔ و انکار من بر منکراں سبب

    حسرت ہاست و اقرار من برائے آناں کہ

    حسد را ترک مے کنند و ایمان مے آرند باعث برکات است و اگر ایں امر

    اور میں وہی مسیح موعود ہوں جس کا آنا آخر زمانہ میں

    خدا کی طرف سے مقدر تھا اور میں

    وہ منعم علیہ ہوں کہ اس کی طرف فاتحہ میں ان دو گروہوں کے ظہور کے وقت

    اشارہ تھا اور بدعتوں اور فتنوں کے پھیل جانے کی طرف اشارہ

    کیا گیا ہے۔ پس کیا تم قبول نہیں کرو گے۔ اور میرا انکار منکروں پر حسرت

    کا سبب ہے اور میرا اقرار ان کے لئے

    جو حسد کو چھوڑتے ہیں اور ایمان لاتے ہیں برکتوں کا باعث ہے اور اگر یہ امر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 180

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 180

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/180/mode/1up


    والشأن من عند غیر اللّہ لمزَّق کلَّ ممزَّق ولجمَع علینا لعنۃَ الأرض ولعنۃ السماء ولأفاز اللّہ أعدائی بکلّ ما یریدون. کلّا بل إنہ وعدٌ من اللّہ وقد تمّ صدقا وحقّا، وإنّہ بُشرٰی للّذین کانوا ینتظرون. وقد رُفِعَ قضیتنا إلی اللّہ

    وإن حزبنا أو حزبکم سیُنصَرون أو یُخذَلون.

    فحاصل الکلام فی ہذا المقام أن

    از طرف خدا نبودے البتہ ایں کارخانہ درہم برہم گردیدے

    و برما *** زمین و آسمان جمع شدے و

    دشمنان در ہر ارادۂ خود کامیاب شدندے ہرگز چنیں نیست بلکہ

    ایں سلسلہ از خدا موعود بود کہ از صدق و حق باتمام رسیدہ۔ و

    مژدہ برائے آناں است کہ انتظار مے کشیدند اکنوں ایں قضیّۂ ما

    در محکمہ خدا مرفوع شدہ است والبتہ نزدیک است کہ نصرت و غلبہ یا شکست گروہ شما

    را دست دہد یا مارا میسر آید۔ غرض

    خدا کی طرف سے نہ ہوتا تو البتہ یہ کارخانہ تباہ ہو جاتا

    اور ہم پر زمین و آسمان کی *** جمع ہو جاتی اور

    دشمن اپنے ہر ارادہ میں کامیاب ہو جاتے ہرگز ایسا نہیں بلکہ

    اس سلسلہ کا خدا کی طرف سے وعدہ دیا گیا تھا جو سچے طور سے پورا ہو گیا اور

    خوشخبری ان کے لئے ہے جو انتظار کرتے تھے اب ہمارا یہ مقدمہ

    خدا کی کچہری میں پہنچ گیا ہے۔ اور قریب ہے کہ تمہاری فتح ہو یا تمہیں

    شکست ہو۔ غرض



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 181

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 181

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/181/mode/1up


    الفاتحۃ قد بیّنت أن ہذہ الأمّۃ امّۃ وسط مستعدّۃ لأن تترقّی، فیکون بعضہم کنبیٍّ من الأنبیاء ، ومستعدّۃ لأن تتنزّل فیکون بعضہم یہودًا ملعونین کقردۃ البیداء ، أو یدخلون فی الضالین ویتنصّرون. وکفاک ہذا الدعاءُ الذی تقرأہ فی صلواتک الخمس إن کنتَ من الذین یطلبون الحق وإلیہ یحفِدون۔

    سورہ فاتحہ آشکار مے کند کہ ایں امت امت وسط است

    و برائے ترقیات آنچناں استعداد دارد کہ ممکن است کہ بعضے از یشاں مانند انبیاء بشوند

    و ہم استعداد دارد کہ آنقدر پست و متنزل بشود کہ بعضے از ایشاں

    یہود و مانند بوزنگاں دشت ملعون بگردند یا در گمراہان داخل

    و نصرانی بشوند۔ و ترا ایں دعا

    کہ در نماز پنجگانہ میخوانی بس است اگر

    طلب حق در دل تست

    سورہ فاتحہ ظاہر کرتی ہے کہ یہ امت امتِ وسط ہے

    اور ترقیات کے لئے ایسی استعداد رکھتی ہے کہ ممکن ہے کہ بعض ان میں سے انبیاء ہو جائیں

    اور یہ بھی استعداد اس میں ہے کہ یہاں تک پست اور متنزل ہو جائے کہ بعض

    ان میں سے یہودی اور جنگل کے بندروں کی طرح *** ہو جائیں یا گمراہ ہو جائیں

    اور نصرانی ہو جائیں۔ اور تیرے لئے یہ دعا جو تو

    پانچ وقت نماز میں پڑھتا ہے کافی ہے اگر

    حق کی طلب تیرے دل میں ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 182

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 182

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/182/mode/1up


    وقد ثبت منہ أنہ ستکون المغضوب علیہم منکم، وسیکون الضالون منکم بتنصُّرہم، فکیف یمکن أن لا یکون المسیح الموعود منکم الذی أُشیر إلیہ وإلی جماعتہ فی قولہ:أَنْعَمْتَ عَلَیْہِمْ۔فلا تفرّقوا فی الفِرق الثلاث الذین أنتم لہم وارثون۔لا یأتیکم یہودی من بنی إسرائیل، ولا نبی من السماء ، إنْ ہی إلّا أسماءُ ہذہ الأمّۃ

    و ازیں عیاں گردید کہ نزدیک است کہ از میان شما مغضوب علیہم

    پیدا بشوند و نیز بسبب نصرانی شدن ضالین بگردند اندریں حال

    چگونہ ممکن است کہ آں مسیح موعود از میان شما نباشد کہ

    بسوئے او و بسوئے جماعت او در انعمت علیہم اشارت رفتہ است

    اکنوں لازم است کہ در فرقہائے سہ گانہ کہ شما وارث آنہا ہستید تفریق نکنید

    ممکن نیست کہ یہودے از بنی اسرائیل یا

    کدام نبی از آسمان پیش شما بیاید۔ بلکہ اینہا ہمہ نامہائے ہمیں امت ہستند

    اور اس سے ظاہر ہوا کہ قریب ہے کہ تمہارے بیچ میں سے مغضوب علیہم

    پیدا ہوں اور ان کے نصرانی ہونے کی وجہ سے ضالین ہو جائیں۔ اس حال میں

    کیونکر ممکن ہے کہ وہ مسیح موعود تمہارے بیچ میں سے نہ ہو جس کی طرف

    اور جس کی جماعت کی طرف انعمت علیہم میں اشارہ ہے

    اب لازم ہے کہ تین فرقوں میں جس کے تم وارث ہو تفریق نہ کرو

    ممکن نہیں کہ کوئی یہودی بنی اسرائیل میں سے یا کوئی

    نبی آسمان سے تمہارے پاس آوے بلکہ یہ سب اسی امت کے نام ہیں۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 183

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 183

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/183/mode/1up


    إن کنتم تعرفون. أتعجبون أن یسمّی اللّٰہ بعضکم یہودیا وبعضکم نصرانیا وبعضکم عیسٰی؟ فلا تکذّبوا کلام اللّہ وفَکِّروا فیما أومیٰ، وانظروا حق النظر أیہا المخطؤن.

    أم یقولون إنا لا نری ضرورۃ مسیح ولا مہدی وکفانا القرآن وإنا مہتدون. ویعلمون أن القرآن کتابٌ 3 ۱؂. فاشتدّت الحاجۃ

    آیا عجب مے دارید ازیں کہ خدا بعضے را

    از شما یہودی نام بنہد و بعضے را نصرانی نام گزارد و بعضے را

    بنام عیسیٰ یاد بفرماید۔ پس تکذیب کلام خدا نکنید و در آنچہ ایما فرمودہ فکر بکنید

    و حقِ اندیشہ کردن بجا آرید بلکہ مے گویند

    کہ ما ہیچ احتیاج و ضرورت بمہدی و مسیح نداریم بلکہ قرآن برائے ما بس است

    و ما راست رو ہستیم حالانکہ مے دانند کہ قرآن کتابے است کہ

    بجز از پاکاں دستِ فہم کسے بوے نہ مے رسد ازیں جاست کہ حاجت

    کیا تم کو اس بات سے تعجب ہے کہ خدا تم میں سے

    بعض کا نام یہودی رکھے اور بعض کا نام نصرانی اور بعضوں کو

    عیسیٰ کے نام سے یاد فرماوے۔ پس خدا کے کلام کی تکذیب نہ کرو اور جس بات کا اشارہ کیا اس میں فکر کرو

    اور خوب سوچو۔ کہتے ہیں کہ

    ہم کو مسیح اور مہدی کی کوئی ضرورت نہیں بلکہ قرآن ہمارے لئے کافی ہے

    اور ہم سیدھے راستے پر ہیں حالانکہ جانتے ہیں کہ قرآن ایسی کتاب ہے کہ

    سوائے پاکوں کے اور کسی کی فہم اس تک نہیں پہنچتی۔ اس وجہ سے ایک ایسے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 184

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 184

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/184/mode/1up


    إلی مفسِّر زُکِّیَ مِن أیدی اللّہ وأُدخِلَ فی الذین یُبْصرون. وَیْحکم! کیف تکذّبون کتاب اللہ وتکفرون بنبأہ؟ أیأمرکم إیمانکم أن تکفروا بأنباء اللّہ إن کنتم تؤمنون؟ وقد خلت قوم من قبلکم ظنوا کظنکم فی رسلہم، فبلّغوا التکذیب والإہانۃ منتہاہا وکانوا یعتدون، فأقبلَ المأمورون علی ربہم واستفتحوا، فخاب الذین

    بمفسرے افتاد کہ دستِ خدا او را پاک کردہ و در بینایان داخل کردہ باشد

    وائے بر شما چگونہ کتاب خدا را تکذیب مے کنید و

    برپیشگوئی وے ایمان نمے آرید۔ آیا ایمان شما شما را امر مے کند کہ کفر بہ پیشگوئی ہائے خدا بکنید

    شما مے دانید کہ پیش از شما قومے بودند

    کہ ہمیں گمان بد کہ شما مے کنید اوشاں دربارہ رسولانِ خود کردند و تکذیب و اہانت را

    از حد گزرانیدند آخر

    ماموراں برآستانۂ ایزدی بیفتادند وبر حضرت وے سر عجز وصدق نہادند۔ و از جناب وے فیصلہ درخواستند

    مفسر کی حاجت پڑی کہ خدا کے ہاتھ نے اسے پاک کیا ہو اور بینا بنایا ہو

    افسوس تم پر کس طرح خدا کے کتاب کی تکذیب کرتے ہو اور

    اس کی پیشگوئی پر ایمان نہیں لاتے۔ کیا تمہارا ایمان تم کو حکم دیتا ہے کہ خدا کی پیشگوئیوں کے ساتھ

    کفر کرو۔ تم جانتے ہو کہ تم سے پہلے ایسی قوم تھی کہ

    یہی برا گمان جو تم کرتے ہو اپنے رسولوں کی نسبت کیا اور تکذیب

    اور اہانت کو حد سے گذار دیا۔ آخر مامور لوگ

    آستانہ احدیّت پر گر پڑے اور اس کی جناب میں عجز اور صدق کا سر رکھ دیا اور اس سے فیصلہ چاہا۔ پس وہ لوگ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 185

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 185

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/185/mode/1up


    کانوا یصُدّون عن سبیل اللّہ ولا ینتہون.

    فاتّقوا سُنَنَ اللّہ وغضبہ أیہا المجترء ون!

    إنکم ترکتم اللّہ فترکَکم، وفعلتم فعل الیہود واتّبعتم آراء ہم، وقد أذاق اللّہ الیہود جزاء ہم، فتوبوا إلی بارئکم وتعالوا إلٰی ما أقول لکم کما بدأکم تعودون، وبلِّغوا الأمر إلی ملوککم

    إن استطعتم وکونوا أنصار اللّہ

    بمجاہدہ در دعا و تضرع و بکا۔ پس آنانکہ از راہ خدا مردم را باز مے داشتند و باز نمے آمدند۔ زیاں کار

    و ناکام گردیدند۔ پس اے جرأت کنندگان از راہ ہائے خدا و غضب وے بترسید۔

    شما خدا را بگذاشتید و او در پاداش آں شمارا بگذاشت و کار یہوداں پیش دست

    گرفتید و خدا اوشاں را کیفر کردار اوشاں بنمود

    اکنوں بسوئے خدا رجوع بیارید و آنچہ مے گویم وے را قبول بکنید

    و در خاطر بدارید کہ چنانکہ شمارا آغاز فرمود ہمچناں بسوئے او باز خواہید گردید۔ و ہرچہ از حق مے شنوید بگوش

    بادشاہاں خود برسانید اگر بتوانید و مدد گارانِ دینِ خدا بشوید

    جو خدا کی راہ سے لوگوں کو روکتے تھے اور باز نہ آتے تھے ناکام اور نامراد ہو گئے۔

    پس اے دلیری کرنے والو! خدا کی سنتوں اور اس کے غضب سے ڈرو۔

    تم نے خدا کو چھوڑ دیا اور اس نے اس کے بدلہ میں تم کو چھوڑ دیا اور تم نے یہودیوں کا کام کیا

    اور خدا نے ان کو ان کے کرتوت کا مزہ چکھایا

    اب خدا کی طرف رجوع کرو اور جو کچھ میں کہتا ہوں اسے قبول کرو

    اور یاد رکھو کہ جس طرح آغاز میں خدا نے تم کو پیدا کیا اسی طرح اس کی طرف لوٹو گے۔ اور جو کچھ تم کو دین کی بات سکھائی گئی ہے اگر ممکن ہو سکے تو اپنے بادشاہوں کو بھی اس کی خبر دو اور خدا کے دین کے مددگار بن جاؤ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 186

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 186

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/186/mode/1up


    لعلکم تُرحمون. وما من قضیۃ أصرّ علیہا

    أہل الأرض إلّا قُضیتْ فی آخر الأمر فی السماء ، وتلک سُنّۃٌ لا تبدیل لہا أیہا الظالمون. وما کان اللّہ لیترک الحق وأہلہ حتی یمیز الخبیث من الطیب، فما لکم

    لا تبصرون؟ وإنْ أَ کُ کاذبا فعلیّ کذبی، وإنْ أَ کُ صادقًا فأخاف أن یمسّکم نَصَبٌ من اللّہ، وإنّہ لا

    تا بر شما رحم بشود و ہر قضیہ کہ اہل زمین براں اصرار

    بورزند لازماً آخر کار در آسمان فیصل کردہ مے شود۔

    اے ظالمان! ایں سنّتِ خداست کہ گاہے تبدیل نشدہ است۔ ہرگز

    ممکن نیست کہ خدا حق را و اہل حق را بگذارد تا آنکہ

    ناپاک را از پاک جدا نہ سازد۔

    اگر من کاذب ہستم و بال کذب من بر سر من فرود آید و اگر من صادق ہستم

    مے ترسم کہ شما را از طرف خدا رنج و درد برسد و مقرر است

    تا تم پر رحم کیا جائے اور ایسا ہر ایک جھگڑا جس میں اہل زمین

    اصرار کریں آخر کار آسمان میں اس کا فیصلہ کیا جاتا ہے۔

    اے ظالمو! یہ خدا کی سنت ہے جو کبھی نہیں بدلی۔ ہرگز

    ممکن نہیں کہ خدا حق کو اور اہل حق کو چھوڑ دے جب تک

    ناپاک کو پاک سے جدا نہ کرے۔

    اگر میں جھوٹا ہوں تو میرے جھوٹ کا وبال میرے سر پر پڑے گا اور اگر میں سچا ہوں

    تو میں ڈرتا ہوں کہ تم پر خدا کی طرف سے عذاب نازل ہو۔ اور یہ پکی بات ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 187

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 187

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/187/mode/1up


    یفلح المعتدون. تُوبوا توبوا فإن البلاء علی بابکم، وسارِعوا إلی توّابکم، وأَمہِلوا بعض ہذا التدلّل، واحضُروا اللّہ من التذلّل، ألیس الموت بقریب، ونکال الآخرۃ أمر مہیب، ولا إصلاح بعد الموت ولا ترجعون. وقد أُوحیَ إلیّ

    من ربّی قبل أن ینزل الطاعون أَنِ "اصْنَعِ الفُلْکَ بِأَعْیُنِنَا وَوَحْیِنَا، وَلَا تُخَاطِبْنِی

    کہ از حد بیرون شوندہ ہرگز فلاح نمے یابد۔ باز آئید باز آئید اینک بلا بر در شما

    ایستادہ و بسوئے خدا بشتابید و اندکے ازیں تکبر بگذارید

    و پیش خدا از روئے نیاز و فروتنی حاضر بشوید

    موت نزدیک است و عذاب آخرت امر ہیبت ناک است

    و پس از مرگ ممکن نیست کہ کسے اصلاح نفس خود تواند کرد یا بدنیا باز آید

    و پیش از نزول طاعون پروردگار بمن وحی فرمود کہ

    در پیش چشم ما و امر ما یک کشتی بساز و دربارہ کسانے

    کہ حد سے نکل جانے والا ہرگز فلاح نہیں پاتا۔ باز آجاؤ۔ باز آجاؤ۔ دیکھو بلا تمہارے

    دروازہ پر کھڑی ہے اور خدا کی طرف جلدی کرو اور کچھ تو اس تکبر میں سے کم کرو

    اور خدا کے سامنے عاجزی سے حاضر ہو جاؤ۔

    موت نزدیک ہے اور آخرت کا عذاب بڑی ہیبت ناک چیز ہے۔

    اور مرنے کے بعد اصلاح کا وقت نہیں اور نہ پھر دنیا میں آنا ہے۔

    طاعون کے نازل ہونے سے پہلے خدا تعالیٰ نے مجھے وحی کی کہ

    ہماری آنکھوں کے سامنے اور ہمارے حکم سے ایک کشتی تیار کر اور ایسے لوگوں کے لئے شفاعت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 188

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 188

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/188/mode/1up


    فی الَّذِینَ ظَلَمُوا إِنَّہُمْ مُغْرَقُونَ. إِنَّ الَّذِینَ یُبَایِعُونَکَ إِنَّمَا یُبَایِعُونَ اللّہَ یَدُ اللہِ فَوْقَ

    أَیْدِیہِمْ"، وقد أشعتُ ہذا الوحی من سنین، ویعلمہ المحبّون والمعادون. واللّہُ یأتی الأرض ینقُصہا من أطرافہا، فتوبوا إلی اللّہ أیہا الغافلون۔ولا تفرّطوا فی حقوق اللّہ وعبادہ،

    ولا تکونوا من الذین یظلمون، وتوبوا

    نزد من شفاعت میار کہ ظلم را عادت مستمرہ خود گرفتہ اند چرا کہ اوشاں پیش ازاں کہ غرق شوند غرق اند

    یعنی در معاصی آناں کہ دست در دست تو مے دہند اوشاں دست در دست خدا مے دہند۔ دست خدا

    بالائے دست اوشاں است۔ سالہا مے گذرد کہ اشاعت ایں وحی کردہ ام

    چنانچہ دوست و دشمن بر ایں آگاہ است۔ و خدا روز بروز زمین را

    از اطرا فش کم ہمے کند بایں معنٰی کہ فوج فوج مر دم از ہر سو مے آیند۔ پس اے غافلاں بسوئے خدا

    رجوع بکنید و درحق خدا و بندگان وے ستمگری و بیداد

    مورزید و توبہ نصوح

    پیش نہ کر جنہوں نے تمام زندگی کے لئے ظلم کرنا اپنا اصول بنا لیا ہے کیونکہ وہ تو غرق ہونے سے پہلے ہی گناہوں میں غرق ہیں اور جو لوگ تیرے ہاتھ میں اپنا ہاتھ دیتے ہیں وہ خدا کے ہاتھ میں ہاتھ دیتے ہیں۔ خدا کا ہاتھ ان کے ہاتھ کے اوپر ہے۔ برسوں ہوئے کہ اس وحی کی میں نے اشاعت کی ہے

    جیسا کہ دوست اور دشمن سب اسے جانتے ہیں اور خدا دن بدن زمین کو اس کی طرفوں سے

    اس طرح پر کم کرتا چلا جاتا ہے کہ فوج در فوج لوگ ہر طرف سے آرہے ہیں۔ پس اے غافلو! خدا کی طرف

    رجوع کرو اور خدا کے اور اس کے بندوں کے حق میں ظلم اور ستم

    نہ کرو۔ اور توبہ نصوح



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 189

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 189

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/189/mode/1up


    توبۃً نَصوحًا لعلکم تُرحَمون. وقال ربّی: "إِنَّ اللّہَ لا یُغَیِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتّی یُغَیِّرُوا مَا بِأَنْفُسِہِمْ. إِنَّہُ أَوَی الْقَرْیَۃَ"، یعنی من دخلہا کان آمِنًا، وأخاف علی الذین لا یخافون اللّہ ولا ینتہون. فقُوموا من مواضعکم خاشعین، واسجدوا توّابین وکونوا لنفوسکم ناصحین وفَکِّروا مرتعدین، ولا تکونوا کالذین یفسقون وہم یضحکون.

    بجا آرید تا بر شما رحم آورند۔ و پروردگار مرا فرمود کہ ہر آئینہ خدا

    حالت ہیچ قومے را تغییر نہ مے کند تا وقتے کہ ایشاں حالت اندرون خود را تبدیل نسازند۔ ہر آئینہ

    خدا ایں دہ را در پناہ خود در آورد بایں معنی کہ ہر کہ دراں داخل شد ایمن گردید۔ و من بر جان آناں

    مے لرزم کہ از خدا نمے ترسند و از سیاہ کاری باز نمے آیند۔ اکنوں باید کہ

    از جاہائے خود با عجز و نیاز برخیزید و با توبہ سجود بکنید

    و غمخواری جان خود بنمائید و با اندیشہ و بیم ناکی فکر بکنید

    و مانند آناں مشوید کہ فسق مے ورزند و خندہ مے زنند

    کرو تا تم پر رحم کیا جائے۔ اور خدا نے مجھے فرمایا کہ خدا

    کبھی کسی قوم کی حالت کو نہیں بدلتا جب تک کہ خود وہ لوگ اپنی اندرونی حالت کو تبدیل نہ کریں۔ اور

    سچ مچ خدا نے اس گاؤں کو اپنی پناہ میں لے لیا ہے۔ یعنی جو کوئی اس میں داخل ہوا وہ سلامت رہا۔ ہاں

    مجھے ان کا فکر ہے جو خدا سے نہیں ڈرتے اور سیاہ کاری سے باز نہیں آتے۔ اب چاہیے کہ

    اپنی جگہوں سے عاجزی سے اٹھو اور توبہ کے ساتھ سجدے کرو

    اور اپنی جان کا فکر کرو۔ اور سوچ اور خوف کے ساتھ فکر کرو

    اور ان کی طرح نہ ہو جاؤ جو فاسق ہیں اور ٹھٹھے مارتے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 190

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 190

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/190/mode/1up


    إن إنکار المأمورین شیء عظیم، ومن حاربہم فقد ألقٰی نفسہ فی الجحیم، فلا خیر فی ہذہ الحرب أیہا المحاربون. وأنتم تقرء ون فی الفاتحۃ ذِکر قوم غضب اللّہ علیہم بما کفروا بالمسیح عیسی ابن مریم وکفّروہ وآذوہ وحقّروہ وأسروہ وأرادوا أن یصلبوہ لیحسب النّاس أنہ أشقی الناس والملعون، ففَکِّروا

    نیکو بدانید کہ انکار ماموران امر است بس بزرگ و آنکہ با اوشاں جنگ کرد

    بالیقین خود را ہیزم دوزخ بگردانید دریں جنگ

    اے جنگ کنندگان برائے شما ہیچ بہبود نیست۔ شما در فاتحہ

    ذکر آں قوم مے خوانید کہ خدا بر سر اوشاں غضب فرود آورد بسبب آنکہ

    مسیح ابن مریم را کفر کردند و رنجانیدند و

    ہیچ داشتند و گرفتار ساختند و خواستند کہ بردارش کشند بجہت آنکہ

    مردم او را ملعون و بدبخت بہ پندارند۔ باید کہ

    خوب جان لو کہ ماموروں کا انکار بڑی بھاری بات ہے اور جو ان سے لڑا

    یقیناًاپنے آپ کو دوزخ کا کندا بنایا۔ اے لڑنے والو!

    اس لڑائی میں تمہارے لئے کوئی بہتری نہیں۔ تم سورۃ فاتحہ میں

    اس قوم کا ذکر پڑھتے ہو جن پر خدا کا غضب اس لئے اترا کہ انہوں نے

    مسیح ابن مریم کا کفر کیا

    اور اس کو حقیر جانا اور ستایا اور پکڑوایا اور چاہا کہ سولی دیں اس لئے کہ

    لوگ اسے ملعون اور بدبخت جانیں۔ چاہے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 191

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 191

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/191/mode/1up


    فی أُمّ الکتاب حقّ الفکر.. لِمَ حذَّرکم اللّہ

    أن تکونوا المغضوبَ علیہم، ما لکم لا تفکّرون؟ فاعلموا أن السرّ فیہ أنّ اللّہ کان

    یعلم أنہ سوف یبعث فیکم المسیح الثانی کأنہ ہو، وکان یعلم أن حزبًا منکم یکفّرونہ ویکذّبونہ ویحقّرونہ ویشتمونہ ویریدون أن

    یقتلوہ ویلعنونہ، فعلَّمکم ہذا الدعاء رُحمًا علیکم

    در ام الکتاب نیکو اندیشہ بفرمائید کہ چرا خدا شمارا بترسانید ازیں کہ

    مغضوب علیہم بگردید۔

    بدانید کہ دریں ایں راز بودہ است کہ خدا مے دانست کہ

    مسیح ثانی درمیان شما پیدا شود و گویا او ہماں باشد

    و نیز خدا مے دانست کہ گروہے از شما وے را بکفر و کذب نسبت خواہند داد

    ویرا دشنام دہند و حقیر بدارند و ارادہ قتل او کنند

    و بروئے *** کنند پس از کمال رحم و برائے

    ام الکتاب میں خوب غور کرو کہ کیوں تم کو خدا نے اس سے ڈرایا کہ

    تم مغضوب علیہم ہو جاؤ۔

    جان لو کہ اس میں یہ راز تھا کہ خدا جانتا تھا کہ

    مسیح ثانی تم میں پیدا ہو گا اور گویا وہ وہی ہو گا

    اور خدا جانتا تھا کہ ایک گروہ تم میں سے اس کو کافر اور جھوٹا کہے گا

    اسے گالیاں دیں گے اور حقیر جانیں گے اور اس کے قتل کا ارادہ کریں گے

    اور اس پر *** کریں گے۔ پس اس نے رحم کر کے اور اس



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 192

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 192

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/192/mode/1up


    وإشارۃً إلی نبأٍ قدَّرہ، فقد جاء کم مسیحکم

    فإن لم تنتہوا فسوف تُسألون. وثبت

    من ہذا المقام أن المراد من المغضوب علیہم عند اللّہ العلّام ہم الیہود الذین فرّطوا

    ان لفظ المغضوب علیہم قد حذیٰ لفظ الضالین۔اعنی وقع ذالک بحذاء ھذا کما لا یخفٰی علی المبصرین۔ فثبت بالقطع و الیقین

    ان مغضوب علیہم ھم الذین فرّطوا فی امر عیسیٰ۔ بالتکفیر

    اشارت بسوئے خبرے کہ مقدر بود ایں دعا شمارا تعلیم کرد۔ بنا براں مسیح شما پیش شما

    بیامد اکنوں اگر از تعدی دست باز نہ داشتید البتہ ماخوذ خواہید شد و ازیں مقام

    ثابت شد کہ مراد از مغضوب علیہم

    نزد خدا آں یہود ہستند کہ در

    بہ تحقیق لفظ مغضوب علیہم بالمقابل لفظ ضالین است۔ یعنی آں لفظ بمقابلہ

    ایں لفظ افتادہ چنانچہ بربینندگان پوشیدہ نیست۔ پس بقطع و یقین ثابت شد کہ

    مغضوب علیہم آں یہود اند کہ در امر عیسیٰ تفریط کردند و کافر گفتند

    خبر کی طرف جو مقدر تھی اشارہ کے لئے یہ دعا تم کو سکھائی۔ پس تمہارا مسیح تمہارے پاس آگیا۔

    اب اگر تم ظلم سے باز نہ آئے تو ضرور پکڑے جاؤ گے اور اس مقام سے

    ثابت ہوا کہ خدا کے نزدیک مغضوب علیہم

    سے وہ یہودی مراد ہیں جنہوں نے

    لفظ مغضوب علیہم ضالین کے لفظ کے مقابل میں ہے یعنی وہ لفظ اس لفظ کے

    مقابل پڑا ہے جیسا کہ دیکھنے والوں پر پوشیدہ نہیں۔ پس قطع اور یقین سے ثابت ہو گیا کہ

    مغضوب علیہم وہ لوگ ہیں جنہوں نے حضرت عیسیٰ کے بارے میں تفریط کی اور کافر قرار دیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 193

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 193

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/193/mode/1up


    فی أمر عیسٰی رسول اللّہ الرحمٰن، وکفّروہ وآذَوہ ولُعنوا علی لسانہ فی القرآن، وکذالک مَن شابَہَہم منکم بتکفیر مسیح آخر الزمان وتکذیبہ وإیذاۂ باللسان، والتمنّی لقتلہ

    ولو بالبہتان، کما أنتم تفعلون. والمراد من

    والایذاء والتوھین۔ کما ان الضالین ھم الذین اَفرطوا فی

    امرہٖ باتخاذہٖ ربّ العالمین۔ منہ

    امر عیسیٰ بیداد و ستمگری ورزیدند واو را کافر گفتند

    آزار رسانیدند و در قرآن بر زبان او *** کردہ شدند۔ و ہمچنیں آنکہ

    از میان شما بسبب تکفیر مسیح آخر الزمان و

    تکذیب و ایذاء وے بازبان و آرزوئے قتل وے مشابہ بآں یہود

    گردیدند۔ و مراد از

    و ایذا دادند و اہانت نمودند۔ چنانکہ ضالین آں گروہ اند کہ در امر عیسیٰ افراط کردند

    و او را خدائے عالمیان اعتقاد کردند۔منہ

    عیسیٰ کے معاملہ میں نا انصافی کی اور اس کو کافر کہا اور

    اس کو ستایا اور قرآن میں اس کی زبان پر *** کئے گئے۔ اور اسی طرح

    تم میں سے وہ جو مسیح آخر الزمان کی تکفیر اور

    زبان سے اس کی تکذیب اور ایذاء اور اس کے قتل کی آرزو کی وجہ سے

    ان یہودیوں سے مشابہ ہو گئے اور

    اور دکھ دیا اور اہانت کی۔ اور ضالین سے وہ لوگ مراد ہیں جنہوں نے حضرت عیسیٰ کے

    بارے میں افراط کیا اور ان کو خدا قرار دے دیا۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 194

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 194

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/194/mode/1up


    قولہ الضَّالِّینَ النصاری الذین أفرطوا فی أمر عیسٰی وأَطرَء وہ وقالوا إن اللّہ ہو المسیح وہو ثالث ثلاثۃ یعنی الثالث الذی یوجد فیہ الثلاثۃ کما ہم یعتقدون. والمراد من قولہ:أَنْعَمْتَ عَلَیْہِمْ ہم النبیون والأخیار الآخرون من بنی إسرائیل الذین صدّقوا المسیح وما فَرّطوا فی أمرہ وما أفرطوا بأقاویل، وکذالک

    ضالین نصاریٰ ہستند کہ دربارہ عیسیٰ از حد

    دور گذشتند و گفتند کہ خدا ہماں مسیح است و

    او ثالث ثلاثہ یعنی آں سوم است کہ آں ہر سہ در وجود وے

    موجود ہستند و مراد از

    انعمت علیہم آں انبیا و برگزیدگاں آخری

    از بنی اسرائیل ہستند کہ تصدیق مسیح کردند و

    دربارہ او تقصیرے نہ نمودند و باگفتار ہا در حق آں مسیح افراط نہ کردند۔ و ہم چنیں

    ضالین سے مراد نصاریٰ ہیں جو عیسیٰ علیہ السلام کے بارہ میں

    حد سے گذر گئے اور کہا کہ مسیح ہی خدا ہے

    اور وہ تین میں سے ایک ہے ایسا کہ دونوں اس کے وجود میں موجود ہیں

    اور

    انعمت علیہم سے وہ انبیاء اور بنی اسرائیل کے آخری برگزیدے

    مراد ہیں جنہوں نے مسیح کی تصدیق کی اور

    اس کے بارہ میں کوئی کوتاہی نہیں کی اور باتوں سے اس مسیح کے حق میں زیادتی نہیں کی اور اسی طرح



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 195

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 195

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/195/mode/1up


    المرادعیسَی المسیحُ الذی خُتِمَتْ علیہ تلک السلسلۃ وانتقلت النبوّۃ، وسُدَّ بہ مجری الفیض کأنہ العَرِمۃ، وکأنہ لہذا الانتقال العلَمُ والعلامۃ أو الحشر والقیامۃ، کما أنتم تعلمون.

    وکذالک المراد من أَنْعَمْتَ عَلَیْہِمْ فی ہذہ الآیۃ ہو سلسلۃ أبدال ہذہ الأُمّۃ الّذین

    صدّقوا مسیح آخر الزمان، وآمنوا بہ

    مراد از لفظ انعمت علیہم عیسیٰ مسیح است کہ بروے آں سلسلہ بانجام

    رسید و از وجود او چشمہ فیض بند شد

    چنانکہ گویا وجود او برائے ایں انتقال

    یک نشانے یا حشرے و قیامتے بود

    و ہمچنیں مراد از انعمت علیہم

    سلسلہ ابدالانِ ایں امت است

    کہ تصدیق مسیح آخرزمان کردند و بصدق دل

    مراد لفظ انعمت علیہم سے عیسیٰ مسیح ہے جس پر وہ سلسلہ

    ختم ہوا اور اس کے وجود سے فیض کا چشمہ بند ہو گیا

    گویا کہ اس کا وجود اس انتقال کے لئے

    ایک نشانی یا حشر اور قیامت تھا

    اور اسی طرح انعمت علیہم سے

    اس امت کے ابدالوں کا سلسلہ مراد ہے

    جنہوں نے مسیح آخرالزمان کی تصدیق کی اور صدق دل سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 196

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 196

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/196/mode/1up


    وقبِلوہ بصدق الطویّۃ والجَنان.. أعنی المسیحَ الذی خُتِمَتْ علیہ ہذہ السلسلۃ، وہو المقصود الأعظم من قولہ أَنْعَمْتَ عَلَیْہِمْ کما تقتضی المقابلۃ ولا ینکرہ المتدبّرون۔ فإنّہ إذا عُلِمَ بالقطع والیقین والتصریح والتعیین أن المغضوبَ علیہم ہم

    الیہود الذین کفّروا المسیح وحسبوہ من الملعونین

    کما یدل علیہ قرینۃ قولہ الضَّالِّینَ

    او را پذیرفتند یعنی آں مسیح را

    کہ بروے ایں سلسلہ ختم شد۔ و ہماں مقصود

    اعظم از انعمت علیہم ہست چہ کہ مقابلہ اقتضائے ہمیں معنٰی

    مے کند۔ و تدبر کنندہ نمے تواند کہ انکار بر ایں معنٰی کند

    مغضوب علیہم

    ہماں یہود ہستند کہ مسیح را بکفر نسبت دادند و ملعونش

    پنداشتند چنانچہ قرینہ قول الضالین بر ایں دلالت مے کند

    اس کو قبول کیا یعنی اس مسیح کو

    جس پر یہ سلسلہ ختم ہوا اور انعمت علیہم سے وہی مقصود اعظم

    ہے کیونکہ مقابلہ اسی کا مقتضی ہے

    اور تدبر کرنے والے اس کا انکار نہیں کر سکتے۔

    مغضوب علیہم

    وہی یہودی ہیں جنہوں نے مسیح کو کافر کہا اور اس کو

    ملعون جانا جیسا کہ الضالین کا لفظ اس پر دلالت کرتا ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 197

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 197

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/197/mode/1up


    فلا یستقیم الترتیب ولا یحسُن نظام کلام الرحمٰن إلا بأن یُعنٰی من أَنْعَمْتَ عَلَیْہِمْ مسیحَ آخر الزمان، فإن رعایۃ المقابلۃ مِن سُنن القرآن ومن أہمّ أمور البلاغۃ وحسن البیان، ولا ینکرہ إلا الجاہلون. فظہر من ہذا المقام بالظہور البیّن التامّ أنہ مَن قرأ ہذا الدعاء فی

    صلا تہ أو خارجَ الصلاۃ فقد سأل ربّہ أن

    بنا براں ترتیب راست نمے آید و نظام کلام قرآنی درست

    نمے گردد بجز اینکہ از انعمت علیہم مسیح آخر الزمان مراد

    گرفتہ شود زیرا کہ از عادت قرآن است کہ رعایت مقابلہ را نگاہ مے دارد

    و نیز رعایت مقابلہ از بزرگترین امور بلاغت و حسن بیان مے باشد و

    بغیر از جاہلے ہیچ کس انکار بریں معنیٰ نمے کند ازیں مقام نیکو آشکار شد

    کہ ہر کہ در نماز یا بیرون از نماز

    ایں دعا را بخواند او البتہ از پروردگار سوال مے کند کہ

    اس لئے ترتیب ٹھیک نہیں بیٹھتی اور قرآن کے کلام کا نظام

    درست نہیں ہوتا سوائے اس کے کہ انعمت علیہم سے آخر زمانہ کا مسیح مراد

    لیا جائے کیونکہ قرآن شریف کی عادت ہے کہ مقابلہ کی رعایت رکھتا ہے

    اور مقابلہ کی رعایت رکھنا اعلیٰ درجہ کی بلاغت اور حسن بیان میں داخل ہے اور

    جاہل کے سوا کوئی اس معنے سے انکار نہیں کرتا۔ اس مقام سے اچھی طرح معلوم ہوا

    کہ جو کوئی نماز میں یا نماز سے باہر اس

    دعا کو پڑھتا ہے وہ اپنے پروردگار سے سوال کرتا ہے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 198

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 198

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/198/mode/1up


    یُدخِلہ فی جماعۃ المسیح الذی یکفّرہ قومہ ویکذّبونہ ویفسّقونہ ویحسبونہ شر المخلوقات ویسمّونہ دجّالًا وملحدًا ضالاًّ کما سَمَّی عیسی الیہودُ الملعونَ. وإذا تَقرّرَ ہٰذا فبَیِّنوا مَن قام فیکم من دونی یدّعی أنہ ہو المسیح الموعود وأنتم کفّرتموہ وخاطبتموہ بہذہ الأسماء وجرحتموہ بسہام الإفتاء ؟ أتکذّبون النبأ الّذی

    او را در جماعت آں مسیح داخل بفرماید کہ قوم وے را کافر گویند و

    تکذیب و تفسیق او بکنند و از بدترین مخلوقاتش بشمارند

    و دجال و ملحد و گمراہ او را نام بگذارند ہمچنانکہ یہود

    ملعون عیسیٰ را نام گذاشتند۔ اکنوں بگوئید کہ آں کیست کہ بجز من

    دعوی بودن مسیح موعود می کند و

    شما او را کافر گفتید و بایں نامہا او را خطاب کردید و

    با تیرہائے فتویٰ دادن اے زبان در ازاں او را زخم رسانیدید۔ آیا چہ شما تکذیب آں پیشگوئی می کنید

    اس کو اُس مسیح کی جماعت میں داخل فرماوے جس کو اس کی قوم کافر کہے گی اور

    اس کی تکذیب کرے گی اور اس کو سب مخلوقات سے بدتر سمجھے گی

    اور اس کا نام دجال اور ملحد اور گمراہ رکھے گی جیسا کہ یہود ملعون نے

    عیسیٰ کا نام رکھا تھا۔ اب بتلاؤ کہ وہ کون ہے جو

    مسیح موعود ہونے کا دعویٰ کرتا ہے اور

    تم نے اس کو کافر کہا اور ان ناموں سے پکارا اور

    فتوے لگانے کے تیروں سے اس کو زخمی کیا۔ کیا تم اس پیشگوئی کو جسے تم نے خود اپنی زبانوں سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 199

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 199

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/199/mode/1up


    أتممتموہ بألسنکم أیہا السالقون؟ ألا تأخذکم الحیاء أنکم تدْعون ربکم فی الفاتحۃ أن یدخلکم فی جماعتی ثم تعرضون؟ وکنتم تقولون لا صلاۃ إلا بالفاتحۃ فلا تکونوا أوّلَ کافر بہا أیہا الموحّدون۔والعجب منکم کل العجب أنکم تقرء ون ہذا الدعاء فی السبع المثانی مع فہم المعانی فی أوقاتکم الخمسۃ ثم تنسونہ وتعرضون۔و

    کہ خود با زبان ہائے خود وے را با تمام رسانیدہ اید آیا شرم دامن شما را

    نمے گیرد کہ در فاتحہ از خدا می خواہید کہ شما را در

    جماعت من داخل بفرماید باز رو مے گردانید و شما مے گفتید کہ بغیر

    فاتحہ ہیچ نماز درست نیست اکنوں اے موحداں خود شما اول کافر بآں مشوید

    حیلے عجیب است کہ ایں دعا را

    در فاتحہ پنجوقت مے خوانید و معنے اش مے فہمید

    باز فراموش مے کنید و اعراض مے نمائید۔

    پورا کیا جھٹلاتے ہو۔ کیا تم کو

    شرم نہیں آتی کہ فاتحہ میں اپنے خدا سے چاہتے ہو کہ تم کو میری جماعت

    میں داخل فرماوے پھر منہ پھیرتے ہو۔ اور تم کہتے تھے کہ بغیر

    فاتحہ کوئی نماز درست نہیں۔ اب اے موحّدو! تم خود سب سے پہلے اس کا کفر مت کرو

    بڑا تعجب ہے کہ پانچ وقت

    اس دعا کو فاتحہ میں پڑھتے ہو اور اس کے معنے بھی سمجھتے ہو

    پھر بھولتے ہو اور مونہہ پھیر لیتے ہو۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 200

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 200

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/200/mode/1up


    ما ہٰذا إلّا شقاوۃ توجب غضب الربّ لما ہی إعراض عما تؤمرون . وما أسألکم علی ما جئتکم بہ من أجر ولا أقول أنِ انبِذوا مالًا من أیدیکم فآخذُہ، بل أوتیکم مالًافہل أنتم تأخذون؟ أیہا الفقراء ما بقی فی أیدیکم شیءٌ من

    الدنیا والآخرۃ، فلا تظلموا أنفسکم وأنتم تعلمون۔

    وإن کنتم فی شکّ من أمری فامتحنونی کیف

    ایں تیرہ بختی غضب خداوندی را پیدا مے کند چہ کہ ایں

    از امر الٰہی رو گردانیدن است من بر آنچہ پیش شما آوردہ ام

    مژدے از شما نمے خواہم و نہ مے گویم کہ مال از دست خود بر زمیں بیفگنید

    و من وے را بردارم بلکہ من خود شما را مال مے دہم آیا مے گیرید

    اے تنگ دستاں! چیزے از دنیا و آخرت در درست شما

    نماندہ پس بر جان خود دانستہ ظلم مکنید

    و اگر دربارۂ من شکے دارید پس بہر طوریکہ بخواہید

    اس بدبختی سے خدا کا غضب بھڑکتا ہے کیونکہ یہ

    خدا کے حکم سے منہ پھیرنا ہے۔ میں اس چیز پر جو تمہارے پاس لایا ہوں

    کوئی اجرت نہیں مانگتا اور نہ یہ کہتا ہوں کہ مال اپنے ہاتھ سے زمین پر پھینکو

    اور میں اسے اٹھالوں۔ بلکہ میں خود تم کو مال دیتا ہوں کیا لیتے ہو؟

    اے فقیرو! دنیا اور آخرت میں سے تمہارے پاس

    کچھ نہیں رہا۔ پس اپنی جان پر جان بوجھ کر ظلم نہ کرو اور

    اگر میری نسبت تمہیں کچھ شک ہے تو مجھے جس طرح چاہو





    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 201

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 201

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/201/mode/1up


    شئتم ولا تنسَوا سنن اللّہ فی قوم یُرسَلون. واعلموا أنکم خرجتم علی قدم بنی إسرائیل، فلا تنسَوا ما مَسَّہم إن کنتم تعقلون. فإنّ اللّہ

    قد غضب علی الیہود مرّتین ما غضب کمثلہا من قبل ولا من بعد، وسمّاہم المغضوب علیہم ولعنہم مرّۃ علی لسان داوٗد و ثانیۃ علی لسان عیسٰی، فتلک الغضب الأشد انحصرت

    مرا بیاز مائید و سنت ہائے خداوندی را کہ در حق مرسلان جاری بودہ است فراموش مکنید

    نیکو بدانید کہ شما گام بر گام بنی اسرائیل زدہ اید

    پس اگر دانشمند ہستید آں عذاب و عقاب را فراموش مکنید کہ باوشاں رسید۔

    چنانچہ معلوم است کہ حق تعالیٰ دو بار بر یہود غضبناک شد کہ مانند آں گاہے

    در پیش و از پس غضبناک نہ شدہ بود و اوشاں را مغضوب علیہم

    گفت و یکبار بر زبان داوٗد و بار دوم

    بر زبان عیسیٰ بر ایشاں *** کرد پس آں غضب شدید در دوبار

    آزما لو اور خدا کے اس قانون کو جو رسولوں کے حق میں جاری ہے مت بھلاؤ۔

    اچھی طرح جان لو کہ تم نے بنی اسرائیل کے قدم پر قدم مارا ہے

    پس اگر عقلمند ہو تو اس عذاب اور سزا کو مت بھلاؤ جو ان کو پہنچی ۔ جیسا کہ

    جانتے ہو کہ خدا تعالیٰ دو دفعہ یہودیوں پر ایسا غضبناک ہوا کہ کبھی آگے پیچھے

    ویسا غضبناک نہیں ہوا اور ان کا مغضوب علیہم

    نام رکھا اور ایک دفعہ داؤد کی زبانی اور دوسری دفعہ

    عیسیٰ کی زبان سے ان پر *** کی۔ پس وہ سخت غضب دو دفعہ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 202

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 202

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/202/mode/1up


    فی المرّتین کما لا یخفی علی الذین یتدبّرون، وقال اللّہ:3333 ۱؂، فہل أنتم تتذکّرون؟ وکان المفسدۃ الآخرۃ الموجبۃ لغضب الربّ تکفیرَ المسیح وإرادۃ صلبہ کما أُشیر فی اللعنتین المذکورتین واتّفق علیہ صحفُ اللّہ والمؤرّخون. فالذین

    منحصر شد چنانچہ بر تدبر کنندگان پوشیدہ نیست

    حق تعالیٰ مے فرماید کہ ما در کتاب با بنی اسرائیل گفتیم

    کہ شما دو بار در زمین فساد خواہید کرد و از حد بیرون خواہید رفت۔

    آیا ایں را یاد مے دارید و آں فساد آخرین کہ

    موجب غضب پروردگار گردید تکفیر مسیح و ارادۂ

    مصلوب کردنش بود چنانچہ دراں دو *** مذکورہ اشارت رفتہ است

    و نوشتہائے خدا و مؤرخاں براں متفق اند۔ پس آناں کہ

    منحصر ہوا جیسا کہ تدبر کرنے والوں پر پوشیدہ نہیں۔

    خدا تعالیٰ فرماتا ہے کہ ہم نے کتاب میں بنی اسرائیل سے کہا

    کہ تم دو دفعہ زمین میں فساد کرو گے اور حد سے نکل جاؤ گے۔

    کیا تمہیں یہ یاد ہے؟ اور وہ دوسروں کا فساد جو

    خدا کے غضب کا باعث ہؤا مسیح کو کافر کہنا اور اس کو

    سولی دینے کا ارادہ تھا جیسا کہ ان دو مذکورہ لعنتوں میں اشارہ ہے۔

    اور خدا کی اور مورخوں کی کتابوں کا اس پر اتفاق ہے۔ پس وہ لوگ جن کو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 203

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 203

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/203/mode/1up


    سمّاہم اللّہ المغضوب علیہم فی الفاتحۃ ہم الیہود الذین کذّبوا المسیح وأرادوا أن یصلبوہ ویعلمہ العالمون. وإنّ لفظ:الضَّالِّینَ الذی وقع بعد ’’الْمَغْضُوبِ عَلَیْہِمْ ‘‘ قرینۃ قطعیۃ علی ہذا المعنی ولا یرتاب فیہ إلا الجاہلون. فإن الضّالین قومٌ أفرطوا فی أمر عیسٰی، فثبت من ہذا أن المغضوب علیہم قوم فرّطوا

    در فاتحہ خدا اوشاں را مغضوب علیہم گفتہ ہماں

    یہود ہستند کہ تکذیب مسیح کردند و خواستند کہ او را

    بر دار بکشند۔ و لفظ ضالین

    کہ با مغضوب علیہم واقع شدہ بر ایں معنٰی قرینہ یقینیہ

    مے باشد کہ غیر از جاہلے دراں شک نمے کند چہ کہ

    ضالین آں کساں ہستند کہ دربارہ عیسٰی افراط کردند ازیں جا

    ثابت شد کہ مغضوب علیہم آں کساں ہستند کہ دربارہ وے

    خدا نے فاتحہ میں مغضوب علیہم کہا ہے وہی

    یہودی ہیں جنہوں نے مسیح کی تکذیب کی اور چاہا کہ اسے

    سولی دیں۔ اور ضالین کا لفظ

    جو مغضوب علیہم کے بعد واقع ہؤا ان معنوں پر یقینی

    قرینہ ہے۔ اس پر جاہل کے سوا کوئی شک نہیں لاتا کیونکہ

    ضالین وہ لوگ ہیں جنہوں نے عیسیٰ کے بارہ میں افراط کیا۔ یہاں سے

    ثابت ہوا کہ مغضوب علیہم وہ لوگ ہیں جنہوں نے اس کی نسبت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 204

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 204

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/204/mode/1up


    فی أمرہ، وہذان اسمان متقابلان أیّہا الناظرون۔ ثم خوّفکم اللّہ أن تکونوا کمثلہم فیحلّ الغضب علیکم کما حلّ علی أعداء المسیح ومسَّہم ***ُہ المذکورۃ فی القرآن، وفی ہذہ تنبیہ لکم أیہا المنکرون. وما ألزمَکم اللّہ قراء ۃَ الفاتحۃ فی کل رکعۃ إلا لہذا الغرض أیہا العاقلون. فلا تُلقوا معاذیرکم، وقد تمّت حُجّۃ اللّہ علیکم

    تفریط کردند و ایں دو نام مقابل یکد گر واقع شدہ اند

    باز خدا شمارا بترسانید ازیں کہ مثل ایشاں بشوید و در نتیجہ ہمچناں غضب بر شما

    فرود آید کہ بردشمنان مسیح فرود آمد و آں ***

    وے لازم حال شاں شد کہ در قرآن مذکور است۔ و دریں بیان اے منکران

    برائے شما آگاہی خوب است۔ و غرض خداوندی از لازم گردانیدن فاتحہ

    در ہر رکعت ہمیں بودہ است

    اکنوں بہانہ مے انگیزید وحجۃاللہ بر شما تمام شدہ۔

    تفریط کی اور یہ دو نام ایک دوسرے کے مقابل پر واقع ہوئے ہیں۔

    پھر خدا نے تم کو اس بات سے ڈرایا کہ تم ان کی طرح ہو جاؤ اور انجام کار ویسا ہی غضب

    تم پر اترے جیسا کہ مسیح کے دشمنوں پر نازل ہوا اور وہ ***

    ان کے شامل حال ہوئی جس کا قرآن میں ذکر ہے اور اے منکرو اس بیان میں

    تمہارے لئے تنبیہ ہے اور ہر رکعت میں فاتحہ کے لازم کرنے سے

    خدا تعالیٰ کی غرض یہی ہے۔

    اب بہانہ بناتے ہو اور خدا کی حجت تم پر تمام ہوئی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 205

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 205

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/205/mode/1up


    فأین تفرّون؟ وما کفَر الیہود بالمسیح إلا لِزعمہم أنہ خالفَ عقیدتہم وما جاء کَمَا کانوا یترقّبون، ولِزعمہم أنہ لیس من بنی إسرائیل وخانتْ أُمُّہ فغضِب اللّہ علیہم فہلک القوم المفسدون۔ فاذکروا الفاتحۃ التی تقر ء ونہا فی کل رکعۃ

    ولیست الصلاۃ إلا بالفاتحۃ، فاحملوا ما حُمّلتم

    فیہا ولا تکونوا کالذین یقولون ولا یفعلون۔

    و راہ گریز بر شما بند گردیدہ۔ یہود کفر با مسیح بایں گمان کردند

    کہ او خلاف عقیدہ ہائے اوشاں کرد و بہ آں طریق نیامد کہ

    او شاں امید و انتظار مے داشتند و نیز بہ ایں گمان کہ او از بنی اسرائیل نیست

    و مادرش خیانت کردہ ازیں سبب خدا بر ایشاں خشمناک شد پس آں تبہ کاران ہلاک

    گردیدند اکنوں آں فاتحہ را کہ در ہر رکعت

    مے خوانید یاد بکنید و ہیچ نماز غیر از فاتحہ راست نمی آید پس بر دوش خود

    ببردارید آنچہ خدا در فاتحہ بر شما بار کرد و مانند آناں مشوید کہ مے گویند و نمی کنند

    اور بھاگنے کی راہ تم پر بند ہوئی۔ یہودیوں نے مسیح کے ساتھ کفر اس گمان

    سے کیا کہ اس نے ان کے عقیدوں کے خلاف کیا اور اس طرح سے نہیں آیا جیسا

    کہ ان کو امید اور انتظار تھا اور اس گمان سے کہ وہ بنی اسرائیل میں سے نہیں

    اور اس کی ماں نے خیانت کی ہے خدا ان پر غضبناک ہوا پس یہ مفسد قوم ہلاک

    ہو گئی اب اس فاتحہ کو جسے ہر رکعت میں پڑھتے ہو

    یاد کرو اور کوئی نماز فاتحہ کے بغیر درست نہیں ہوتی۔ پس اب اپنی پیٹھ پر اٹھاؤ

    جو خدا نے تم پر فاتحہ میں ڈالا اور ان کی طرح نہ ہو جاؤ جو کہتے ہیں اور نہیں کرتے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 206

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 206

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/206/mode/1up


    ولا تقرَبوا الفاتحۃَ وأنتم لا تعرفونہا، ولا تقرَبوہا وأنتم لا تعتقدون۔ أحسِبتم قراء ۃَ الفاتحۃ وفی کل رکعۃٍ تلاوتَہا کعَملکُمْ بِہَا، ساء ما تزعمون. ولستم علی شیءٍ منہا وما آمنتم بحرف من حروفہا حتّی تؤمنوا بالمسیح الذی بُعث بینکم منکم، و شہدتْ سورۃ النور علیہ فہل

    أنتم تؤمنون۔ وإن لم تؤمنوا بہا ولم تعملوا

    و نزدیک فاتحہ نروید چوں آنرا نمے شناسید و ہرگز نزدیک آں

    نگردید چوں براں اعتقاد نمے دارید آیا خواندن فاتحہ را

    در ہر رکعت ہمیں طور گمان مے کنید چناں کہ براں عمل کنید ایں گماں شما خیلی بداست

    در حقیقت شمارا ہیچ تعلق بافاتحہ نیست و با حرفے از حروفش ایمان نیاوردہ اید

    تا آنکہ برآں مسیح ایمان آورید کہ

    درمیان شما و از میان شما پیدا شدہ و سورہ نور بر صدق وے گواہی دادہ آیا

    ایمان مے آرید و اگر بر فاتحہ ایمان نمے آرید و نہ برو عمل مے کنید

    اور فاتحہ کے نزدیک مت جاؤ جب تم اسے نہیں پہچانتے اور ہرگز اس کے نزدیک نہ جاؤ

    جب تم کو اس پر اعتقاد نہیں کیا تم فاتحہ کا پڑھنا

    اور ہر رکعت میں اس کی تلاوت کرنے کو ایسا ہی گمان کرتے ہو جیسا کہ اس پر عمل کرتے ہو۔ یہ تمہارا گمان بہت برا ہے حقیقت میں تم کو فاتحہ سے کچھ تعلق نہیں اور اس کے ایک حرف پر بھی ایمان نہیں لاتے

    جب تک تم اس مسیح پر ایمان نہ لاؤ جو

    تم میں سے اور تمہارے بیچ میں پیدا ہوا اور سورۃ نور نے اس کی سچائی پر گواہی دی۔ کیا

    ایمان لاؤ گے؟ اور اگر فاتحہ پر ایمان نہیں لاؤ گے اور نہ اس پر عمل کرو گے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 207

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 207

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/207/mode/1up


    فیحلّ علیکم غضب اللّہ کما حلّ من قبلکم

    علی الیہود. واتّقوا اللّہ الذی إن عصیتم ینْزع

    الدین والدولۃ منکم ویؤتیہما قوما یطیعون.

    وتعرفون ما فُعِلَ بالیہود بعد المسیح ولا

    تُعجِزہ المجرمون. واللّہُ غنیّ عن العالمین إن کانوا لا ینتہون. وما قلتُہ من عند نفسی بل قالہ

    اللّہ ربکم، أما قرأتم: 3 ۱؂

    پس غضب خدا ہمچناں شما را فرا گیرد کہ یہود را فرا گرفت

    و از خدائے بترسید کہ بر عصیان

    دین و دولت را از دست شما بیرون کشد و فرمان پذیراں را عطا بفرماید

    و شما مے دانید آنچہ خدا بعد مسیح با یہود کرد و در

    ہیچ ہنگام مجرمان او را نمے توانند کہ عاجز بکنند و خدا از مردمان بے نیاز است اگر

    از بے فرمانی دست باز ندارند۔ من ایں ہمہ از پیش نفس خود نگفتہ ام بلکہ

    پروردگار شما گفتہ است۔ آیا نخواندہ اید اکنوں خدا مے بیند کہ چگونہ عمل مے کنید

    تو خدا کا غضب تم کو اسی طرح پکڑے گا جیسا کہ یہود کو پکڑا

    اور اس خدا سے ڈرو جو تمہاری نافرمانی پر

    دین اور دولت دونوں تمہارے ہاتھ سے چھین لیوے اور فرمانبرداروں کو دے دے

    اور تم جانتے ہو جو کچھ خدا نے مسیح کے بعد یہودیوں کے ساتھ کیا اور

    کسی وقت مجرم اس کو عاجز نہیں کر سکتے اور خدا لوگوں سے بے نیاز ہے اگر

    باز نہ آئیں میں نے یہ سب اپنی طرف سے نہیں کہا ہے بلکہ

    تمہارے پروردگار نے کہا ہے کیا تم نے نہیں پڑھا۔ اب خدا دیکھتا ہے کہ تم کیا کرتے ہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 208

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 208

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/208/mode/1up


    و’’333 ۱؂ ‘‘ 333 ۲؂ فقد غیّرتم فسوف تعلمون. وتقولون إنّا نحن المسلمون، واللّہ یعلم ما تعملون أیہا المتصلّفون. ألم یأنِ أن تخشع قلوبکم وتخافوا وعیدَ اللّہ وقد رأیتم

    أیّاما کأیّام الیہود أفلا تبصرون؟ توبوا توبوا

    و چوں خدا چیزے را مے خواہد امر او بجز ایں نمے باشد کہ او را مے گوید بشو

    و مے شود خدا حالت ہیچ قومے را تغییر نمے کند تا آنکہ ایشاں حالت خود را

    تغییر بکنند اکنوں آگاہ باشید کہ شما حالات خود را تغییر کردہ اید قریب است کہ

    عاقبت وے را بدانید۔ و مے گوئید کہ ما مسلمان ہستیم و خدا مے داند آنچہ

    مے کنید اے لاف زنان! آیا وقت آں نیامد کہ دل ہائے شما

    فروتنی بگزینند واز وعید خدا بترسید حالانکہ شما

    روزہا مانند روز ہائے یہود دیدید آیا بینا نیستید۔ توبہ بکنید توبہ بکنید

    اور جب خدا کسی چیز کو چاہتا ہے کہ ہو جائے تو اسے کہتا ہے کہ ہو جا

    تو وہ جا تی ہے۔ خدا کسی قوم کی حالت کو نہیں بدلتا جب تک وہ خود اپنی حالت کو

    نہ بدلے اب خبردار ہو جاؤ کہ تم نے اپنی حالت کو بدل دیا ہے۔ قریب ہے کہ تم

    اس کا نتیجہ دیکھو۔ اور کہتے ہو کہ ہم مسلمان ہیں اور خدا جانتا ہے جو کچھ

    کرتے ہو اے لاف زنو! کیا ابھی وہ وقت نہیں آیا کہ تمہارے

    دل عاجز ہو جائیں اور خدا کی وعید سے ڈرو حالانکہ تم نے وہ دن دیکھے

    جو یہود نے دیکھے تھے۔ کیا تم اندھے ہو؟ توبہ کرو توبہ کرو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 209

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 209

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/209/mode/1up


    قبل أن تہلکوا ولا تغضَبوا علی داعی اللّہ ولا تحاربوا ربّکم أتقدرون أن تردّوا ما أراد اللّہ؟ ونعلم أنکم لا تقدرون. فاتّقوا اللّہ ولا تنسَوا المَنون. وإنّ وعد اللّہ حق، فاخشوا عواصف أیہا المتّقون. وإنہ مالکٌ یؤتی المُلک من یشاء ، وینْزع المُلک ممّن یشاء ، ألا تنظرون إلی قول اللّہ’’ 3 ‘‘ ۱؂ فقد

    پیش از انکہ ہلاک بشوید و بر داعی خدا خشمناک مشوید و با

    پروردگار خود جنگ پیش مگیرید۔ آیا مے توانید کہ ارادۂ خدا را رد بکنید

    ماخوب میدانیم کہ شما نمے توانید پس از وے بترسید و مرگ را

    یاد بکنید البتہ وعدۂ خدا حق است پس از تند بادہائے تباہی

    خوف بکنید او مالک است ہر کرا خواہد ملک بدہد

    واز دست ہر کہ خواہد باز بکشد آیا قول خدا را

    نگاہ نمے کنید او کارہائے شما را خوب مے بیند

    اس سے پہلے کے ہلاک ہو جاؤ۔ اور خدا کی طرف بلانے والے پر غصے مت ہو اور

    اپنے رب سے مت لڑو کیا تم خدا کے ارادہ کو رد کر سکتے ہو؟

    ہم خوب جانتے ہیں کہ تم نہیں کر سکتے۔ پس اس سے ڈرو اور موت کو

    یاد کرو۔ خدا کا وعدہ بے شک حق ہے پس تباہی کی آندھیوں سے خوف کرو۔

    وہ مالک ہے جس کو چاہے ملک دے

    اور جس سے چاہے چھین لے کیا خدا تعالیٰ کے قول کو

    نہیں دیکھتے وہ تمہارے کاموں کو خوب دیکھتا ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 210

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 210

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/210/mode/1up


    قیل لکم ما قیل للیہود وأنتم تعلمون مآل أمرہم ولا تجہلون. اتقوا اتقوا، واترکوا التکبّر واخشعوا، وادفعوا الرُّجْزَ وتَطہّروا، وارحموا ذراریکم ولا تظلموا، واتّقوا اللّہ الذی إلیہ تُصرَفون۔لااسمَ علی السماء إلا اسم المنقطعین، فجاہِدوا أن تُکْتَب أسماء کم فی السماء ، ولا تفرحوا بقشر الإسلام أیہا المسلمون۔

    و بہ شما ہموں طور گفتہ شد کہ بہ یہود گفتہ شدہ بود و شما انجام کار ایشاں را

    خوب مے دانید بترسید بترسید و تکبر را

    بگذارید و فروتنی بگزینید و پلیدی و ناپاکی را از خود دور بکنید و پاک بشوید و

    بر اولاد خود رحم آرید و ستم نکنید و از خدا بترسید کہ انجام کار

    باو رجوع خواہد بود در دفتر آسمان غیر از نام منقطعان

    نوشتہ نمے شود پس کوشش کنید کہ نام ہائے شما بر لوح آسمان ثبت گردد

    و بر پوست اسلام ناز مکنید اے مسلمانان

    اور تمہیں وہی کہا گیا جو یہود کو کہا گیا تھا اور تم ان کا انجام

    بخوبی جانتے ہو کہ کیا ہوا۔ ڈرو ڈرو اور تکبر کو

    چھوڑ دو اور عاجزی اختیار کرو اور پلیدی اور ناپاکی کو اپنے آپ سے دور کرو اور پاک ہو جاؤ

    اور اپنی اولاد پر رحم کرو اور ظلم نہ کرو اور خدا سے ڈرو کیونکہ آخر

    اس کے پاس جانا ہے آسمان کے دفتر میں ان کا نام لکھا جاتا ہے جو خالص خدا کے

    ہو گئے ہیں پس کوشش کرو کہ تمہارا نام آسمان کے لوح پر لکھا جائے

    اور اے مسلمانو! اسلام کے چھلکے پر ناز مت کرو۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 211

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 211

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/211/mode/1up


    قد اقتربت أیّام اللّہ، وإنہ یذہب بالفاسقین منکم، ویأتی بقوم یحبّہم ویحبونہ.. یذکرون اللّہ ویذکرہم، ویُتمّ علیہم کل ما وعدکم من النعم، ولا تضرّونہ شیئا، فما لکم لا تتقون؟

    إن مثل نبیّنا عند اللّہ کمثل موسٰی، وإن موسٰی وعد قومًا، وأَتَمَّہ لقوم آخرین، وأہلکَ اللّہ

    آباء ہم فی الفلاۃ لِما کانوا قومًا عاصین۔

    ایام روزہائے خدا قریب رسیدہ و نزدیک است کہ اوکاروبار فاسقاں را سرد کند کہ

    از شما سر بر آوردہ اند و قومے را بر روئے کار بیارد کہ او ایشاں را دوست دارد

    و ایشاں وے را دوست دارند ایشان وے را یاد کنند واو ایشاں را یا دکند۔ وہمگی وعدہ ہائے نعمت کہ

    کردہ است در حق ایشاں با تمام رساند و شما ہیچ ضررے باو نتوانید رسانید پس چرا نمے ترسید

    البتہ مثل نبی ما نزد خدا مثل موسیٰ است و شما مے دانید کہ

    موسیٰ با قومے وعدہ کرد دلے آں وعدہ را در حق قوم دیگر با تمام رسانید و خدا

    پدران ایشاں را در دشت نابود کرد زیرا کہ نا فرمان بودند

    خدا کے دن قریب آگئے ہیں اور قریب ہے کہ وہ ان فاسقوں کی رونق بازار سرد کر دے جو تم میں سے

    ہیں۔ اور ایسی قوم پیدا کرے کہ وہ ان سے محبت کرے اور وہ اس سے محبت کریں۔ وہ اسے یاد کریں اور وہ

    ان کو یاد کرے اور نعمت کے سارے وعدے جو اس نے تم سے کئے ہیں ان کے حق میں پورا کرے

    اور تم اسے کچھ ضرور نہیں پہنچا سکتے پس کیوں نہیں ڈرتے۔

    خدا کے نزدیک ہمارے نبی صلی اللّہ علیہ و سلم موسیٰ علیہ السلام کی طرح ہیں اور تم جانتے ہو کہ موسیٰ

    نے ایک قوم کے ساتھ وعدہ کیا لیکن اس وعدہ کو دوسری قوم کے حق میں پورا کیا اور خدا نے

    ان کے باپوں کو میدان میں ہلاک کیا کیونکہ نافرمان قوم تھی۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 212

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 212

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/212/mode/1up


    وکذٰلک یفعل بکم أیہا المعتدون، ویرحمکم أیہا الصالحون. فاصلِحوا ذات بینکم وأصلحوا ما أفسدتم، ولا تقعدوا مع الذین یستکبرون.

    أ تُعجِزون ربّ السماء ببطشکم أو تخدعونہ بخدیعتکم؟ کل بل إنکم علی أنفسکم تظلمون. ولا أقول لکم عندی علم أو قوۃ. سبحان اللّہ! ما أنا إلا عبدٌ ضعیف، وأنطقنی الذی یُنطِق

    نزدیک است کہ خدا ہمیں معاملہ باشما بکند اے از حد گذرندگاں۔ واے صالحان! بر شما رحم

    آورد۔ اکنوں باید کہ براستی و آشتی میل آرید و درست بکنید آں چیز را

    کہ تباہ کردہ اید و با گردن کشاں ہم نشینی مکنید

    آیا ممکن است کہ با زور و قوت خود پروردگار آسمان راماندہ بکنید یا مے توانید

    کہ او را بفریبید۔ ہرگز ممکن نیست بلکہ ستم بر جان خود مے کنید

    من نہ مے گویم کہ در دست من علم و قوت است۔ سبحان اللّہ! بلکہ من

    بندۂ ناتوان ہستم و مرا ہماں خدا گویا ساخت

    اور خدا یہی معاملہ تمہارے ساتھ کرے گا اے حد سے بڑھ جانے والو۔ اور اے پرہیزگارو

    تم پر رحم کرے گا اب چاہیے کہ سچائی اور صلح اختیار کرو اور اس چیز کو درست کرو

    جسے تم نے تباہ کر دیا ہے اور مغروروں کے ساتھ نہ بیٹھو

    کیا ممکن ہے کہ اپنے زور اور قوت کے ساتھ آسمان کے ربّ کو تھکا دو

    بلکہ اپنی جان پر ظلم کرتے ہو۔

    میں نہیں کہتا کہ میرے ہاتھ میں علم اور قوت ہے۔ سبحان اللّہ! بلکہ میں

    ایک عاجز بندہ ہوں اور مجھے اسی خدا نے گویائی دی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 213

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 213

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/213/mode/1up


    رسلَہ، فما لکم لا تفہمون؟ اترُکوا الفاتحۃ،

    أو اعملوا بہا حیاءً من اللّہ إن کنتم قومًا تتّقون. أتقرء ونہا وہی لا تُجاوز حناجرکم أیہا المراء ون؟ وإن المغضوب علیہم ہم الیہود

    الذین حذّرکم اللّہ من مضاہاتہم، الذین فَرّطوا فی أمر عیسٰی، فاسألوا أہل الذکر إن کنتم

    لا تعلمون. أتنتظرون من دونی مسیحًا

    کہ رسولان خود را گویائی بخشید۔ پس چرا نمے فہمید اکنوں یا فاتحہ را بگذارید

    یا شرم از خدا کردہ عمل بآں کنید اگر قومے

    خدا ترس ہستید۔ چیست کہ فاتحہ را مے خوانید و آں از گلوئے شما نمے گذرد

    اے ریاکاراں و ثابت شدہ کہ مغضوب علیہم

    ہماں یہود ہستند کہ خدا شما را از مشابہ گردیدن باوشاں ترسانید آناں کہ

    دربارہ عیسیٰ تفریط کردند پس اگر علم ندارید از اہل ذکر

    بپرسید۔ آیا بعد از من انتظار مسیح می کشید

    جس نے رسولوں کو گویائی عطا فرمائی۔ پس کیوں نہیں سمجھتے۔ اب یا تو فاتحہ کو چھوڑو

    یا خدا سے شرم کر کے اس پر عمل کرو۔ اگر تم خدا سے ڈرنے والی

    قوم ہو۔ کیا بات ہے کہ فاتحہ کو پڑھتے ہو اور وہ تمہارے گلے سے نیچے نہیں اترتی

    اے ریاکارو! اور ثابت ہوا کہ مغضوب علیہم

    وہی یہود ہیں جن کی طرح ہونے سے خدا نے تم کو ڈرایا اور جنہوں نے

    عیسیٰ کے بارے میں تفریط کی۔ پس اگر علم نہیں رکھتے تو علم والوں سے

    پوچھو۔ کیا میرے سوا ایسے مسیح کا انتظار کرتے ہو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 214

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 214

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/214/mode/1up


    الذی یُؤذَی کمثلی، فتکفّرونہ وتکذّبونہ وتشتمونہ کمثلی، وکدتم تقتلونہ، وکفاکم ہذا الوِزْرُ الذی احتملتم بتکفیری، فلا تجسّسوا مسیحًا آخر لتُکفِّروہ، أتستطیعون أن تحملوا الوِزْرَین أیہا المعتدون؟ ولا بُدّ لکم أن تُکفّروا المسیح الصادق لیتمّ نبأ اللّہ وقد کفّرتمونی وتمّ ما قُدّرَ لکم، فلا تطلبوا تکفیرًا آخر إن کنتم تعقلون۔ و

    کہ مثل من آزار دادہ شود پس شما تکذیب و تکفیر وے بکنید و چوں من وے را

    دشنام بدہید و بخواہید کہ وے بکشید و ہمیں گناہ کہ بسبب تکفیر من

    طوق گردن شما شدہ برائے شما کافی است۔ اکنوں جستجوئے مسیح دیگر برائے

    کافر گردانیدن نکنید آیا مے توانید کہ دو بار را ببردارید

    و چارہ ازیں نیست کہ تکفیر مسیح صادق بکنید

    تا پیشگوئی خدا باتمام رسد و شما تکفیر من کردید و آنچہ مقدر برائے شما بود بظہور رسید

    اکنوں تکفیر شخصے دیگر طلب نہ کنید

    جو میری طرح ستایا جائے پھر تم اس کی تکذیب کرو اور اس کو کافر کہو اور میری طرح اس کو

    گالیاں دو اور چاہو کہ اس کو مار ڈالو اور یہی گناہ جو میری تکفیر کی وجہ سے

    تمہارے گلے کا ہار ہو گیا ہے تمہارے لئے کافی ہے اب دوسرے کو نہ ڈھونڈو

    کیا تم سے ہو سکتا ہے کہ دوہرا بوجھ اٹھاؤ

    اور اس سے چارہ نہیں کہ سچے مسیح کی تکفیر کرو

    تا خدا کی پیشگوئی پوری ہو اور تم نے میری تکفیر کی اور جو کچھ تمہارے لئے مقدر تھا ظاہر ہو گیا

    اب اگر عقلمند ہو تو دوسرے شخص کی تکفیر طلب نہ کرو۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 215

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 215

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/215/mode/1up


    تفصیل المقام أن اللّہ قد أخبر عن بعض الیہود

    فی السورۃ الفاتحۃ۔ إنہم کانوا محلّ غضب اللّہ فی زمن عیسی ابنِ الصدّیقۃ، فإنّہم کفّروہ وآذوہ وأثاروا لہ کل نوع الفتنۃ، ثم أشار إلٰی

    أن طائفۃ منکم کمثلہم یکفّرون مسیحہم ویکمّلون جمیع أنحاء المشابہۃ، ویفعلون بہ

    ما کانوا یفعلون. وأنتم تقرء ون آیۃ الْمَغْضُوبِ

    تفصیل ایں مقام ایں طور است کہ حق تعالیٰ در سورۃ فاتحہ از بعضے یہود خبر مے دہد

    کہ در زمان عیسیٰ بن صدیقہ

    غضب خدا بر ایشاں نازل شد زیرا اوشاں اورا کافر گفتند

    و آزار رسانیدند و ہر گونہ فتنہ برپا کردند باز حق تعالیٰ اشارت

    مے فرماید کہ گروہے از شما مانند یہود تکفیر مسیح خواہند کرد

    و ہر گونہ مشابہت باایشاں پیدا خواہند کرد و از دست او شاں ہمہ آں کارہا

    سر برزنند کہ از یہود ظاہر شدند و شما آیت مغضوب علیہم

    اس مقام کی تفصیل اس طرح پر ہے کہ خدا تعالیٰ سورۃ فاتحہ میں ان بعض یہودیوں کی نسبت اطلاع

    دیتا ہے جن پر عیسیٰ بن صدیقہ کے زمانہ میں

    خدا کا غضب ان پر نازل ہوا کیونکہ انہوں نے اس کو کافر کہا

    اور ستایا اور ہر طرح کا فتنہ اٹھایا پھر خدا تعالیٰ اشارہ فرماتا ہے

    کہ تم میں سے ایک گروہ یہود کی طرح اپنے مسیح کی تکفیر کرے گا

    اور ہر طرح کی مشابہت ان سے پیدا کر لیں گے اور ان کے ہاتھوں سے وہ سب کام

    ہوں گے جو یہود نے کئے اور تم مغضوب علیہم کی آیت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 216

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 216

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/216/mode/1up


    عَلَیْہِمْ، ثم لا تلتفتون۔ أعلَّمکم اللّہ ہذہ السورۃ عبثًا کوضع الشیءِ فی غیر محلّہ أو کتَبہا لتذکیرِ جریمۃ ترتکبونہا ما لکم لا تُمعِنون؟ وما غضِب اللّہ علی تلک الیہود إلّا لما کَفّروا رسولہ عیسی وکذّبوہ وشتموہ وکادوا أن یقتلوہ من الحسد والہوی، وقد کتب علیکم قدرُ اللّہ أنکم تفعلون بمسیحکم کما فعل الیہود بمسیحہم،

    مے خوانید باز رو بآں نمے آرید آیا خدا ایں سورۃ را بے سود بشما

    تعلیم داد چنانکہ کسے چیزے را در غیر محلش مے نہد یا ایں سورۃ را بجہت آں نازل

    فرمود کہ شمارا آں گناہ یاد دہاند کہ از دست شما سر برزند چرا بغور نمے بینید و خدا براں یہود

    بسبب کفر عیسیٰ

    و تکذیب و دشنام وے خشمناک شد و نیز بسبب آں کہ مے خواستند کہ از

    ہوا و حسد او را بقتل رسانند و ہمچنیں تقدیر خداوندی در حق شما جاری شدہ

    کہ با مسیح خود ہماں خواہید کرد کہ یہود با مسیح خود کردند

    پڑھتے ہو پھر اس کی طرف توجہ نہیں کرتے کیا خدا نے یوں ہی یہ سورۃ تم کو

    سکھلائی جیسا کہ کوئی کسی چیز کو بے ٹھکانے رکھ دے۔ یا اس سورۃ کو اس لئے اتارا

    کہ تم کو وہ گناہ یاد دلائے جو تمہارے ہاتھ سے ہوگا۔کیوں غور سے نہیں دیکھتے اور خدا

    ان یہودیوں پر عیسیٰ کو کافر کہنے کے سبب

    اور اس کی تکذیب اور اس کو گالیاں دینے کے سبب غضبناک ہوا اور اس لئے بھی کہ وہ

    ہوا و حسد کے مارے چاہتے تھے کہ اس کو قتل کر دیں۔ خدا تعالیٰ کی تقدیر تمہارے حق میں اسی طرح جاری

    ہوئی ہے کہ تم اپنے مسیح سے وہی کرو جو یہود نے اپنے مسیح سے کیا۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 217

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 217

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/217/mode/1up


    وقد فعلتم بی کمثلہ، فہل بقی ہوًی لکم یا حزبَ العدا أن تُکفّروا وتکذّبوا وتؤذوا کمثلی نفسًا أخری؟ وقد شہدت ألسنکم وأقلامکم ومکائدکم أنکم أتممتم علیّ ما أُشیرَ إلیہ فی سورۃ الفاتحۃ، فارحموا مسیحًا آخر وأَقِیلوہ من ہذہ العزّۃ أیہا المنتظرون. أما شبعتم

    بہذا القدر؟ أتریدون أن ینزل عیسی ابن مریم

    اکنوں شما با من ہماں طور معاملہ کردید آیا اے گروہ دشمناں! آیا چیزے آرزو

    و تمنا در دل شما باقی است کہ مے خواہید کہ بار دگر مثل من شخص دیگر را تکفیر و تفسیق بکنید و

    آزار بدہید حالانکہ زبان ہائے شما و قلمہائے شما و فریب ہائے شما ہمگی گواہی

    مے دہند بر ایں کہ شما در حق من ہمہ آنرا باتمام رسانیدہ اید کہ در سورہ فاتحہ اشارت

    بآں رفتہ پس اے منتظراں بر مسیح دیگر رحم آرید

    و ازیں عزت و احترام وے را معاف بدارید آیا بایں قدر کہ بجا آوردید

    ہنوز سیر نشدہ اید آیا مے خواہید کہ مسیح ابن مریم از آسمان

    اب تم نے اسی طرح میرے ساتھ معاملہ کیا۔ اے دشمنوں کے گروہ! کیا کچھ آرزو تمہارے

    دل میں باقی ہے جو چاہتے ہو کہ پھر دوسری دفعہ میرے جیسے دوسرے شخص کی تکفیر اور تفسیق کرو

    اور اس کو ستاؤ حالانکہ تمہاری زبانوں اور تمہاری قلموں اور تمہارے فریبوں نے اس بات پر گواہی

    دے دی کہ تم نے میرے حق میں وہ سب کچھ پورا کر لیا ہے جس کا سورۃ فاتحہ میں اشارہ ہے

    پس اے انتظار کرنے والو دوسرے مسیح پر رحم کرو

    اور اس عزت و احترام سے اس کو معاف رکھو کیا اتنے سے تمہارا پیٹ

    نہیں بھرا کیا چاہتے ہو کہ مسیح ابن مریم آسمان سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 218

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 218

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/218/mode/1up


    من السماء ثم تفعلوا بہ ما فعل الیہود بہ من قبل، ویجتمع علیہ القارعتان والتکفیران والذلّتان، ویذوق اللعنۃ مرّتین، بل ثلاث مرات،

    ولن یجمع اللّہ علیہ اللّعان الثلاث

    نازل شود و با او ہماں بکنید کہ قبل ازیں یہود با وے کردند

    و ازیں جہت بروے دو مصیبت و دو تکفیر

    و دو ذلت جمع بشوند۔ و دو *** بلکہ

    سہ۳ *** را بچشد۔ و خدا بر سر وے ہرگز ایں سہ *** جمع نخواہد کرد۔

    نازل ہو اور اس سے وہی کرو جو اس سے پہلے یہودیوں نے اس کے ساتھ کیا

    اور اس طرح اس پر دو مصیبتیں اور دو تکفیریں

    اور دو ذلتیں جمع ہو جائیں اور دو *** بلکہ

    تین *** کا مزہ چکھے اور خدا اس پر ہرگز تین لعنتیں جمع نہیں کرے گا

    قد ثبت من مفہوم قولہ تعالٰی غیر المغضوب علیھم ان المسیح

    از مفہوم آیت غیر المغضوب علیہم ثابت شدہ است کہ برائے مسیح موعود

    الموعود قد قدّر لہ ان یلعنہ الذین یقولون انا نحن المسلمون

    مقدر است کہ فرقہ از مسلمانان برو *** کردہ

    الذین غضب اللّہ علیھم کما غضب علی الیھود و ھم لا یعلمون

    مورد غضب الٰہی شوند

    فان فرضنا ان المسیح الموعود ھو المسیح الذی اُنزل علیہ الانجیل

    پس اگر ما فرض کنیم کہ مسیح موعود ہماں عیسیٰ است کہ برو انجیل نازل شدہ بود

    فعند ذالک تجتمع علیہ لعنات ثلٰث۔ لعنۃ من الیھود و لعنۃ من

    دریں صورت سہ *** برو جمع مے شوند۔ لعنتے از طرف یہود۔ و لعنتے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 219

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 219

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/219/mode/1up


    کما أنتم تزعمون. وقد لعنتم مسیحًا جاء کم منکم، وأتممتم علیہ ما کُتِبَ فی کتاب اللّہ، فہو المسیح الموعود إن کنتم تتفکّرون.

    سیقولون إنا لا نحضُرہ إلّا تذلّلا وطاعۃً فکیف نکفّرہ ونؤذیہ وإنّا بہ مؤمنون۔ قُلْ ہذا قدرٌ من اللّہ کُتِبَ علی حزبٍ منکم فی الفاتحۃ،

    ہمچناں کہ گمان مے کنید وشما براں مسیح *** کردہ اید کہ از شما نزد شما

    آمد و پیشگوئی قرآن را برو باتمام رسانیدہ اید

    پس ہماں مسیح موعود است اگر فکر کنید

    ایشاں خواہند گفت کہ ما بکمال فروتنی و فرمان پذیری پیش اوحاضر شویم

    پس چگونہ ممکن است کہ او را کافر گوئیم و آزارش بدہیم در حالیکہ ما با اوایمان بیاوریم۔ بگو ایں

    تقدیر خداوندی است کہ در حق گروہے از شما در سورۃ فاتحہ نوشتہ شدہ

    جیسا کہ تم گمان کرتے ہو اور ایک مسیح تو تمہیں میں سے تمہارے پاس آچکا

    اور تم نے اس پر وہ پیشگوئی پوری کر دی جو سورۃ فاتحہ میں تھی

    پس وہی مسیح موعود ہے جس پر وہ پیشگوئی پوری ہو گئی۔

    کہیں گے کہ ہم پوری خاکساری اور عاجزی سے اس کے پاس حاضر ہوں گے پھر کیونکر ہو سکتا

    ہے کہ ہم اسے کافر کہیں اور ستائیں حالانکہ ہم اس پر ایمان لائیں۔ کہہ دے کہ یہ

    خدا کی تقدیر ہے جو تمہارے میں سے ایک گروہ کی نسبت سورۃ فاتحہ میں لکھی گئی ہے۔

    النصاریٰ و لعنۃ من المسلمین الذین یکفرونہ عند نزولہ و یُکذّبون۔ فکانّ السرّ

    از طرف نصارٰی ولعنتے از طرف آں مسلماناں کہ تکذیب و تکفیر او خواہند کرد۔ پس گویا در نازل کردن عیسیٰ علیہ ا لسلام

    فی انزال عیسٰی ھو تکمیل امر اللعن وادخال المسلمین فی الذین یلعنون۔ منہ

    ہمیں رازے است کہ تا امر *** را مکمل کردہ شود و مسلمانان نیز دراں گروہ داخل شوند کہ برولعنت مے فرستند۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 220

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 220

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/220/mode/1up


    وإنّ قدر اللّہ لا یبدَّل أیہا الجاہلون. ألا

    تقرء ون الفاتحۃ وقد کنتم تصرّون علیہا

    أیہا المحدِّثون؟ الیوم عاداکم الفاتحۃ وأنتم عادیتموہا وصار التزامہا عذاب أنفسکم کأنہا جرعۃٌ غیر سائغ تبلَعونہا ولا تستطیعون. ولا تتلون بعد ذالک ہذہ السورۃ إلا وأنتم تتألّمون. ولا تتلون:غَیْرِ الْمَغْضُوبِ عَلَیْہِمْ

    و اے جاہلان تقدیر خداوندی ہرگز تبدیل نمی شود

    اے پیروان حدیث! آیا اکنوں فاتحہ را نمے خوانید و شما براں بسیار اصرار

    مے کردید۔ امروز فاتحہ با شما عداوت مے کند و شما

    باوے میکنید و التزام آں بر جان شما عذاب شدید گردیدہ

    گوئی آں یک جرعہ ناگوار است کہ آں را از کام فرو بر دن مے خواہید و نمی توانید

    و امید است کہ بعد ازیں بغیر ایں کہ دل را صد مہ رسد ایں سورۃ را نخواہید خواند

    و غیر المغضوب علیہم را نخواہید خواند

    اور خدا کی تقدیر کبھی نہیں بدلتی۔

    اے حدیث کی پیروی کرنے والو! کیا اب فاتحہ کو نہیں پڑھتے اور تم تو اس پر بہت اصرار

    کیا کرتے تھے۔ آج فاتحہ تم سے دشمنی کرتی ہے اور تم

    اس سے کرتے ہو اور اس کا التزام تمہاری جان پر سخت عذاب ہو گیا ہے

    گویا کہ وہ ایک ناگوار گھونٹ ہے جسے نگلنا چاہتے ہو لیکن نگل نہیں سکتے

    اور امید ہے کہ اب اس کے بعد تم اس سورۃ کو بغیر درد و الم کے نہ پڑھو گے

    اور جب غیر المغضوب علیہم کا لفظ پڑھو گے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 221

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 221

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/221/mode/1up


    إلّا وتغضبون علی أنفسکم وتتندّمون.

    وترونہا عذابا شدیدا فی کل حین تقرء ون. فحینئذ تحترق قلوبکم بلظَی الحسرۃ و

    ربما تودّون لو کنتم تترکون.

    اَلْبَابُ الرَّابِعُ

    إن الذین یزعمون أن عیسی صعد إلی

    السماء لیس عندہم سلطان وإنْ ہم إلّا یکذبون۔

    مگر آنکہ بر جان ہائے خود خشمناک خواہید شد و پشیمان خواہید شد و

    ہر وقتے کہ تلاوت آں خواہید کرد جان شما ازاں عذاب شدید محسوس خواہد کرد

    و دراں وقت دلہائے شما از آتش حسرت کباب گردد و

    بسا اوقات آرزو خواہید کرد کہ کاش کسے از ما سورۂ فاتحہ را نخواندے۔

    آناں کہ پندارند کہ عیسیٰ علیہ السلام بر آسمان رفت

    در دستِ شاں دلیلے نیست بلکہ ایشاں دروغ مے زنند

    تو تم کو اپنے اوپر سخت غصہ آئے گا اور پچھتاؤ گے اور

    جس وقت اسے پڑھو گے تمہاری جان اس سے سخت عذاب محسوس کرے گی۔

    اس وقت تمہارے دل حسرت کی آگ سے کباب ہوں گے اور

    اکثر چاہو گے کہ کاش کہ ہم سورۃ فاتحہ کا پڑھنا چھوڑ دیتے۔

    جن کا یہ گمان ہے کہ عیسیٰ علیہ السلام آسمان پر گئے

    ان کے ہاتھ میں کوئی دلیل نہیں بلکہ وہ جھوٹ بولتے ہیں۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 222

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 222

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/222/mode/1up


    أکتَبہ اللّہ فی القرآن فیتّبعونہ، أو قالہ الرسول

    فیقولونہ کلّا بل ہم یفتَرون. ولن تجد آیۃ

    فی ہذا الباب، ولا حدیثا من نبیّنا المستطاب،

    ولا یقبَلہ العقل السلیم أیہا العاقلون.

    وقالوا إن المسیح رُفع إلی السماء الثانیۃ

    وصُلب مقامَہ رجل آخر، فانظر إلی کذبٍ

    ینحِتون۔أکانوا حاضرین عند ہذہ الواقعۃ

    آیا ایں سخن را خدا در قرآن نوشتہ است کہ پیروی آں مے کنند یا موافق گفتہ رسول

    مے گویند ہرگز چناں نیست بلکہ از پیش خود مے تراشند درایں باب آیتے

    و حدیثے یافتہ نمے شود

    و نہ ایں امر را عقل سلیم قبول مے کند۔

    و گویند کہ مسیح بر آسمان دوم مرفوع شد و

    در جائے او شخص دیگر را بر دار کشیدند۔ ایں دروغ را بہ بیں

    کہ تراشیدہ اند۔ آیا در وقت وقوع ایں واقعہ حاضر بودند؟

    کیا یہ بات خدا نے قرآن میں لکھ دی ہے اس لئے اس کی پیروی کرتے ہیں یا یہ بات رسول نے کہی

    ہے۔ پس وہ بھی کہتے ہیں۔ ہرگز ایسا نہیں ۔ بلکہ وہ خود یہ بات تراشتے ہیں۔ اس بارہ میں

    کوئی آیت اور حدیث پائی نہیں جاتی

    اور نہ اس بات کو عقل سلیم قبول کرتی ہے۔ اور

    کہتے ہیں کہ مسیح دوسرے آسمان پر اٹھا لیا گیا اور

    اس کی جگہ ایک دوسرا شخص سولی دیا گیا۔ اس جھوٹ کو دیکھو

    جو انہوں نے تراشا ہے۔ کیا وہ اس واقعہ کے وقوع کے وقت حاضر تھے؟



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 223

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 223

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/223/mode/1up


    أو وجدوہا فی الکتاب والسنّۃ، فلیُخرجوہا

    لنا إن کانوا یصدُقون. کلّا.. بل إنہم یفترون

    علی اللّہ ورسولہ ولا یتّقون. ولا یفکّرون

    فی أنفسہم أن العقل یخالف ہذہ القصّۃ

    ولا یصدّقہا المتفرّسون. فإنّ الذی صُلب

    فی مصلب عیسٰی إنْ کان من المؤمنین

    فکیف صلَبہ اللّہ و قد قال فی التوراۃ إنہ

    یا آں را در کتاب و سنت دیدہ اند۔ باید کہ آں مقام

    مارا ہم بنمایند اگر راست مے گویند۔ ہرگز چناں نیست بلکہ

    بر خدا و رسول وے افتراء مے کنند و خوف ندارند و

    در دل خود فکر نمے کنند۔ عقل دست رد بر سینہ ایں قصہ

    مے زند و دانشمنداں زنہار دنبال تصدیق ایں نروند۔ چہ کہ آں شخص

    مصلوب کہ در جائے عیسیٰ بکشتن درآمد اگر مومن بود

    چگونہ خدا بگذاشت کہ او را بر دار بکشند حالانکہ در تورات فرمودہ کہ

    یا اس کو قرآن اور حدیث میں دیکھا ہے چاہیے کہ وہ مقام

    ہم کو بھی دکھلائیں اگر سچ کہتے ہیں۔ ہرگز ایسا نہیں بلکہ

    خدا اور اس کے رسول پر افتراء کرتے ہیں اور نہیں ڈرتے اور

    اپنے دل میں نہیں سوچتے۔ عقل اس قصہ کے مخالف ہے

    اور عقل مند ہرگز اس کی تصدیق نہیں کرتے کیونکہ وہ

    مصلوب شخص جو عیسیٰ کی بجائے سولی دیا گیا اگر وہ مومن تھا تو

    خدا نے کس طرح اسے چھوڑ دیا کہ وہ سولی دیا جائے حالانکہ تورات میں خدا نے فرمایا ہے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 224

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 224

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/224/mode/1up


    مَن صُلب فہو ملعون. ألَعَنَ عبدًا ویعلم

    أنہ مؤمن، سبحانہ وتعالٰی عمّا

    یصفون! و قد لعن اللّہ فی التوراۃ

    کلَّ مَن صُلب فاسأل أہل التوراۃ إن کنت

    من الذین لا یعلمون۔ وإن کان المصلوب

    من أعداء عیسٰی ومن الکفار فکیف سکت

    المصلوب عند صلبہ وما برّأ نفسہ، وکیف بقی أمرہ

    ہر کہ مصلوب شود ملعون است۔ آیا خدا بندہ را ملعون کرد و

    میدانست کہ او مومن است پاک است ذات او ازیں چیز ہا کہ باوے نسبت مے کنند

    و خدا در تورات ہر مصلوب را ملعون قرار مے دہد

    اگر نمے دانید از اہل تورات بپرسید

    و اگر شخص مصلوب از دشمنان عیسیٰ

    و از کفار بود وقت صلیب چرا خاموش

    ماند و چرا خود را بری ثابت نہ کرد و چرا امر او

    جو سولی دے کر مار دیا جائے وہ ملعون ہے۔ کیا خدا نے ایک ایسے بندہ کو ملعون کیا

    جس کی نسبت جانتا تھا کہ وہ مومن ہے اس کی ذات ان باتوں سے پاک ہے جو وہ اس سے منسوب

    کرتے ہیں۔ اور خدا تورات میں ہر ایک مصلوب کو معلون قرار دیتا ہے۔

    اگر ہم نہیں جانتے تو تورات والوں سے پوچھو۔

    اور اگر وہ مصلوب شخص عیسیٰ کے دشمنوں میں سے

    تھا اور کافر تھا تو صلیب کے وقت کیوں چپ رہا

    اور اپنے آپ کو کیوں بری نہ ثابت کیا اور اس کی بات کیوں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 225

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 225

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/225/mode/1up


    کالمکنون؟ وکان المصلوبون لا یموتون إلا إلٰی

    ثلا۔ثۃ أیام أو یزیدون. فکانت المہلۃ کافیۃ،

    فاسأل الذین یصلبون عدوًّا من أعداء

    عیسٰی کیف سکت المصلوب إلٰی ہذا الأمد..

    أیقبلہ العاقلون؟ ألم یبق لہ شہداء

    مِن أُمّہ وزوجہ وإخوانہ وجیرانہ وأحبابہ

    وأصحابہ ومن الذین کان أودعَہم أسرارَہ

    پوشیدہ بماند و چنیں بود کہ مصلوب بر صلیب تا سہ۳ روز

    بلکہ زیادہ ازاں میماند و نمے مرد پس ایں قدر مہلت برائے ایں تحقیق

    کافی بود۔ اکنوں ازاں کساں کہ دشمنے را از دشمنانِ عیسیٰ صلیب مے دہند

    بپرسید کہ آں مصلوب تا اینقدر مدت چگونہ خاموش ماند

    آیا ایں را عاقلاں مے پذیرند۔ آیا برائے او گواہاں از

    مادر و زن و برادراں و ہمسائیگان و دوستان

    و یاران وے نماندند و نیز آں کساں ہم نماندند کہ راز دار

    پوشیدہ رہی مصلوب صلیب پر تین دن تک بلکہ تین دن سے

    زیادہ تک زندہ رہ سکتا تھا۔ پس اس قدر مہلت اس تحقیق کے لئے

    کافی تھی۔ اب ان لوگوں سے جنہوں نے عیسیٰ کے ایک دشمن کو سولی دیا پوچھو

    کہ وہ مصلوب اتنے دنوں کیونکر چپ رہا۔

    کیا عقلمند اسے قبول کرتے ہیں۔ کیا اس کے لئے

    اس کی ماں اور بیوی اور بھائی اور ہمسائے اور دوست

    گواہ نہ بنے۔ اور کیا انہوں نے بھی گواہی نہ دی جو اس کے راز دار



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 226

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 226

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/226/mode/1up


    وکانوا یعرفونہ ۔ ہیہات ہیہات لما تزعمون!

    وشتّان بین الحق وبین ہذہ المفتریات،

    أمَا بقی عندکم مثقال ذرّۃ من عقل بہ تعقلون؟

    بل ہذہ القصص خرافات لا أصل لہا، ولا تقبلہا الفطرۃ الصحیحۃ، ولا توجد إلیہا الإشارۃ الجلیّۃ

    أو الخفیّۃ فی کتاب اللّہ ولا فی أثر رسولہ،

    فالذین یتّبعونہا لا یتّبعون إلا سَمْرًا

    وشناسائے او بودند افسوس! بریں گمان کہ مے کنید

    و درمیان حق و ایں مفتریات فرقے بسیار است۔

    آیا ذرّہ از عقل در سر شما باقی نیست کہ با آں مغز سخن را بفہمید

    بلکہ ایں ہمہ افسانہ ہائے بیہودہ ہستند کہ ہیچ اصلے ندارد و

    فطرت صحیحہ از قبول آنہا سرباز زند و دربارہ اینہا نہ اشارۂ پوشیدہ

    و نہ آشکار در کتاب اللہ یافتہ مے شود و نہ در حدیث رسول

    وے موجود است۔ پس آنانکہ پیروی اینہا مے کنند فی الحقیقت پیروی دروغ بے فروغ

    اور اس کے پہچاننے والے تھے اس گمان پر جو تم کرتے ہو افسوس ہے۔

    حق میں اور ان افتراؤں میں بڑا فرق ہے۔

    کیا ذرہ سی عقل بھی تمہارے سر میں باقی نہیں رہی جس سے بات کی تہ کو پہنچ جاؤ

    یہ سب بیہودہ قصے ہیں ان کی کچھ اصلیت نہیں اور

    فطرت صحیحہ ان کو قبول نہیں کرتی اور ان کے بارہ میں کوئی پوشیدہ

    اور کھلا اشارہ قرآن شریف میں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی

    حدیث میں نہیں پایا جاتا۔ پس جو لوگ ان کی پیروی کرتے ہیں وہ دراصل جھوٹ کی پیروی کرتے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 227

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 227

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/227/mode/1up


    وإنْ ہم إلا یعمہون۔ وأما نزول عیسٰی فاعلم

    أن لفظ النزول عربيّ یُستعمل فی محل الإکرام والإجلال، وتعلمون معنی النزیل أیہا المتفقّہون.

    وما رأینا فی کتب الحدیث خبرًا من رسول اللّہؐ

    مرفوعًا متّصلا یُفہَم منہ أن عیسٰی ینزل من

    السماء ، وما وجدنا لفظ السماء فی أحد من

    الأحادیث الصحیحۃ القویۃ، وہذا أمر بدیہیٌّ

    مے کنند و آوارہ دشت سراسیمگی مے باشند۔ اما سخن دربارہ نزول عیسیٰ پس بداں کہ

    لفظ نزول لفظ عربی است کہ در محل اکرام و بزرگ داشتن کسے

    استعمال کردہ مے شود و معنی نزیل بر دانشمنداں پوشیدہ نیست

    و ما در کتب حدیث ہیچ حدیثے

    مرفوع متصل ندیدہ ایم کہ ازاں ظاہر شود کہ عیسیٰ از آسمان نازل گردد

    و نہ لفظ سما در ہیچ کدام حدیث

    صحیحہ قویہ یافتیم چنانچہ ایں امر نزد دانایان علم حدیث

    اور پڑے بھٹکے پھرتے ہیں۔ لیکن عیسیٰ کے نزول کی نسبت پس جان تو کہ

    نزول کا لفظ عربی لفظ ہے جو کسی کی عزت اور تعظیم کے لئے استعمال

    کیا جاتا ہے اور نزیل کے معنے عالِم جانتے ہیں۔

    اور ہم نے حدیث کی کتابوں میں ایسی کوئی مرفوع متصل حدیث

    نہیں دیکھی جس سے یہ ظاہر ہوتا ہو کہ عیسیٰ آسمان سے اترے گا

    اور نہ ہم نے سماء کا لفظ کسی حدیث

    صحیح قوی میں پایا اور یہ بات حدیث کے عالم خوب جانتے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 228

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 228

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/228/mode/1up


    یعلمہ المحدِّثون، ولا ینکرہ إلا الذی جہل

    أو تجاہل، ولا ینکرہ إلا العمون. ومع ذالک

    إنّہ أمرٌ خالفَ القرآنَ وعارضہ، فبأیّ حدیث

    بعد القرآن تؤمنون؟ وقد قال اللّہ سبحانہ

    3 ۱؂

    آشکار است۔ و انکار ایں امر نمے کند مگر شخصے کہ جاہل باشد

    یا خود را جاہل وا نماید یا آنکہ چشم او کور باشد و علاوہ براں

    ایں امر خلاف قرآن و ضدّ آں واقع شدہ است۔ پس کدام حدیث است

    کہ بعد از قرآن بہ آں ایمان مے آرید و خدا مے فرماید کہ

    محمد (صلی اللہ علیہ و سلم) نبود مگر رسولے و قبل ازو رسولاں گذشتہ اند

    اور اس بات کا انکار سوائے اس کے کوئی نہیں کرتا جو

    جاہل ہو یا اپنے آپ کو جاہل ظاہر کرے۔ یا جو اندھا ہو اور اس کے سوا

    یہ بات قرآن کے خلاف اور اس کی ضد پڑی ہوئی ہے۔ پس قرآن کے سوا کون سی حدیث ہے

    جس پر ایمان لاتے ہو اور خدا فرماتا ہے کہ

    محمد (صلی اللہ علیہ و سلم) رسول ہیں اور ان سے پہلے رسول گذر چکے ہیں۔

    قد جرت سُنّۃ اہل اللسان فی لفظ خلا۔ انھم اذا قالوا مثلا

    عادت اہل عرب بریں جاری شدہ است کہ چوں اوشاں مے گویند کہ

    خلا زید من ھٰذہ الدار او من ھٰذہ الدنیا فیریدون من ھٰذا

    زید ازیں خانہ یا ازیں دنیا بگذشت پس ازیں قول ایں مراد

    القول انہ لا یرجع الیھا ابدا۔ وما اختار اللّہ ھذا اللفظ الا

    مے دارند کہ او گاہے سوئے او مراجعت نخواہد کرد۔ و خدا تعالیٰ ایں لفظ را از بہر ہمیں

    اشارۃ الی ھذہ المحاورۃ کما لا یخفٰی۔ منہ

    اختیار کردہ است کہ تا مردم معلوم کنند کہ ہر کہ از دنیا رفت باز نمے آید۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 229

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 229

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/229/mode/1up


    فصرّح بأن الأنبیاء الذین کانوا من قبل ماتوا

    کلہم والمرسلون. وہذہ آیۃ تلاہا أبو بکر

    الصدیق رضی اللّہ عنہ- إذ کان الأصحاب یختلفون.. أعنی إذا اختلف بعض النّاس من الصحابۃ

    فی موت رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ و سلم، وقال

    عمر إنہ سیرجع کما یرجع عیسٰی، وکذالک

    قال بعضہم الذین کانوا یخطؤن. فسمع

    ایں آیت آشکار مے کند کہ ہمہ انبیائے پیشین فوت کردند

    و ہمیں آیت را حضرت صدیق

    بر مجمع صحابہ بخواند چوں اختلاف کردند

    بایں معنے کہ چوں بعض مردم

    در موت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اختلاف کردند۔ حضرت

    عمر گفت کہ آنحضرت ہمچناں باز رجوع مے کنند چنانکہ عیسیٰ رجوع بفرماید و ہمچنیں

    بعض دیگر خطاکاراں مے گفتند۔ دریں اثنا

    یہ آیت بتاتی ہے کہ سارے اگلے نبی فوت ہو چکے ہیں۔

    اسی آیت کو حضرت ابوبکر صدیق نے

    تمام صحابہ کو سنایا جب انہوں نے اختلاف کیا

    یعنی جب بعض لوگوں نے

    رسول اللّہ صلی اللہ علیہ وسلم کی موت میں اختلاف کیا اور حضرت

    عمر نے کہا کہ آنحضرت اسی طرح واپس آئیں گے جیساکہ عیسیٰ واپس آئے گا اور اسی طرح

    اور بعض خطاکاروں نے بھی کہا تو اس وقت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 230

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 230

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/230/mode/1up


    أبو بکر کلامہم وما کانوا یزعمون، فقام علی

    المنبر واجتمع الصحابۃ حولہ وتلا الآیۃ

    المذکورۃ وقال اسمعونِ. وکانوا مجتمعین

    کلہم لموت رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ و سلم

    فسمعوا وتأثّروا بأثر عجیب کأن الآیۃ نزلت

    فی ذالک الیوم وکانوا یبکون ویصدّقون.

    وما بقی أحد منہم فی ذالک الیوم إلا أنہ آمن

    حضرت ابو بکر کلام ایشاں شنید و بر پندار ایشاں آگاہ شد پس بر منبر بالا

    برآمد و اصحاب بر گرد وے گرد آمدند و ایں آیت مذکورہ را

    برخواند و فرمود از من بشنوید و ہمگناں

    بر موت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جمع آمدہ بودند

    چوں ایں آیت را شنیدند تاثیر شگرف در دل یافتند وپنداشتند کہ گوئی ایں آیت

    ہمدراں روز نازل شد و بر شنیدنش گریہ آغاز کردند و تصدیق فرمودند و

    دراں روز شخصے نماند کہ از تہ دل بایں ایمان نیاورد کہ

    حضرت ابو بکر نے ان کا کلام سنا اور ان کے گمان پر آگاہ ہوئے تب منبر پر

    کھڑے ہوئے اور صحابہ ان کے گرد جمع ہوئے پھر آیت مذکورہ

    پڑھی اور فرمایا سنو! اور سب کے سب

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی موت پر جمع تھے۔

    جب یہ آیت سنی تو عجیب تاثیر اپنے دلوں میں پائی اور سمجھے کہ گویا یہ آیت آج ہی اتری ہے

    اس کو سن کر انہوں نے رونا شروع کیا اور تصدیق کی

    اس دن ایسا کوئی شخص نہ رہا جو اس پر ایمان نہ لایا ہو کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 231

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 231

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/231/mode/1up


    بصمیم القلب أن الأنبیاء کلہم قد ماتوا وقد

    أدرکہم المنون. فما بقی لہم أسف علٰی موت رسولہم ولا محلّ غبطۃ لحبیبہم، وتنبّہوا

    علی موتہ، وفاضت عیونہم وقالوا إنا للّہ

    وإنا إلیہ راجعون. وکانوا یتلون ہذہ

    الآیۃ فی السکک والأسواق والبیوت

    ویبکون. وقال حسّان بن ثابت وہو یرثی

    ہمہ انبیا ازیں عالم رخت بر بستہ اند

    اکنوں اوشاں را بر موت رسول خویش

    رنجے و غمے برائے محبوب خویش محل تحسّر و افسوس نماند و بر موت وے

    خبردار و آگاہ شدند و جوئے اشک از چشم رواں ساختند

    انا للہ گفتند و ایں آیت را

    در کوچہ و بازار و خانہ مے خواندند

    و مے گریستند چنانچہ حسان بن ثابت بعد از خطبہ ابوبکر

    سارے نبی فوت ہو چکے ہیں

    اب ان کو اپنے رسول کی موت پر

    کوئی رنج اور غم اور اپنے پیارے کے لئے کوئی حسرت اور افسوس کی جگہ نہ رہی

    اور اس کی موت پر خبردار اور آگاہ ہو گئے اور آنسوؤں کے دریا آنکھوں سے بہائے

    اور انا للہ کہا اور اس آیت کو

    گلی کوچوں میں اور گھروں میں پڑھتے تھے

    اور روتے تھے چنانچہ حسان بن ثابت نے حضرت ابوبکر کے خطبہ کے بعد



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 232

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 232

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/232/mode/1up


    لرسول اللّہ صلی اللہ علیہ وسلم بعد خطبۃ أبی بکر

    کُنْتَ السَّوَادَ لِنَاظِرِی فَعَمی عَلَیْکَ النَّاظِرُ

    مَنْ شَاءَ بَعْدَکَ فَلْیَمُتْ فَعَلَیْکَ کُنْتُ أُحَاذِرُ

    یرید أن خوفی کلہ کان علیک، فإذا متَّ

    فلا أبالی أن یموت موسٰی أو عیسٰی فانظروا

    إلیہم کیف أحبّوا نبیّہم وکیف کان تصدر

    منہم آداب المحبّۃ وآثارہا أیہا المجادلون.

    در مرثیہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم گفت۔

    تو مردمک چشم من بودی اکنوں از فقدان تو چشم من نابینا شد

    بعد از مردنت ہر کہ خواہد بمیرد من بر جان تو مے لرزیدم

    یعنی ہمہ خوف من از بابت جان تو بود چوں تو مردی

    اکنوں من ہیچ باک ندارم کہ موسیٰ بمیرد یا عیسیٰ بمیرد۔ پس نگاہے بفرمائید

    کہ اوشاں نبی ء خود را چہ قدر دوست مے داشتند و چہ طور آداب محبت

    و نشان آں ازوشاں آشکار مے شدند

    رسول اللہ صلی اللّہ علیہ وسلم کے مرثیہ میں کہا

    تو میری آنکھ کو پتلی تھی اب تیرے جاتے رہنے سے میں اندھا ہو گیا

    تیرے مرنے کے بعد جو چاہے مرے مجھے تو تیرے ہی مرنے کا ڈر تھا

    یعنی مجھے تو سارا یہی ڈر تھا کہ کہیں تو نہ مر جائے لیکن اب جبکہ تو ہی مر گیا

    تو اب مجھے کچھ پروا نہیں کہ موسیٰ مرے یا عیسیٰ مرے۔ اب غور کرو کہ

    وہ اپنے نبی کو کس قدر دوست رکھتے تھے اور کس طرح محبت کے آداب

    اور نشان اُن سے ظاہر ہوتے تھے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 233

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 233

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/233/mode/1up


    وانظروا کیف اقتضتْ غیرتہم أنہم ما رضوا

    بحیاۃ نبی بعد موت رسول اللّہ، فہُدُوا إلی

    الصراط کما یُہدَی العاشقون. واجتمعت

    قلوبہم علی مفہوم آیۃ قَدْ خَلَتْ مِن قَبْلِہِ الرُّسُلُ

    وآمنوا بہ وکانوا بہ یستبشرون. ثم أتیتم

    بعدہم.. ما قدّرتم نبیّکم حقّ قدرہ وتقولون

    ما تقولون. أتأمرکم محبّتکم بنبیّکم أن یّبقٰی

    و نیز نگاہے بکنید کہ غیرت ایشاں ہرگز روا نداشت کہ بعد موت رسول اللّہ

    صلی اللّہ علیہ و سلم بر حیات ہیچ کدام نبی راضی بشوند پس خدا او شاں را

    ہماں طور راہ حق بنمود کہ عاشقان را مے نماید و

    دل ہائے ایشاں بر مفہوم آیت قد خلت من قبلہ الرسل اتفاق کردند

    و بہ آں ایمان آوردند و شادمانی ہا کردند پس

    بعد از اصحاب نوبت بشما رسید۔ شما رعایت حق و قدر نبی ہیچ بجا نیا وردید۔ وے گوئید

    آنچہ مے گوئید آیا محبت شما روا دارد کہ عیسیٰ

    اور یہ بھی غور کرو کہ ان کی غیرت نے ہرگز نہ چاہا کہ رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ و سلم

    کی موت کے بعد کسی نبی کی حیات پر راضی ہو جائیں پس خدا نے ان کو

    اس طرح سے حق کی راہ دکھلائی جس طرح عاشقوں کو دکھلاتا ہے۔ اور

    ان کے دلوں نے قد خلت من قبلہ الرسل کی آیت کے مفہوم پر اتفاق کر لیا۔

    اور اس پر ایمان لائے اور اس پر خوش ہوئے۔ پھر صحابہ کے بعد

    تمہاری باری آئی تم نے اپنے نبی کی وہ قدر نہیں کی جو قدر کرنے کا حق تھا۔ اور کہتے ہو

    جو کچھ کہتے ہو۔ کیا تمہاری محبت روا رکھتی ہے کہ عیسیٰ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 234

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 234

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/234/mode/1up


    عیسٰی علی السماء حیًّا وقد مضٰی ألفٌ وقریب

    مِن ثُلُثہ علی موت رسول اللّہ؟ ساء ما تحکمون.

    أرَضِیتم بأن یکون نبیکم مدفونًا فی التراب

    فی المدینۃ، وأمّا عیسٰی فہو حیّ إلٰی ہذا الوقت؟

    اتقوا اللّہ أیہا المجترء ون. قد کان إجماع

    الصحابۃ علی موت عیسٰی أوّلَ إجماع انعقد

    فی الإسلام باتفاق جمیعہم، وما کان فرد

    بر آسمان زندہ باشد و نبیء ما از مدّت چہاردہ صد

    شربت ممات چشیدہ است

    آیا بایں خورسند ہستید کہ نبیء شما در مدینہ زیر زمین

    مدفون و لیکن عیسیٰ تا ایں زمان زندہ باشد

    اے دلیران بیباک از خدا بترسید و ایں اجماع

    اول بود کہ باتفاق جمیع صحابہ در اسلام منعقد گردید

    و فردے از افراد

    آسمان پر زندہ ہو اور ہمارے نبی چودہ سو برس

    سے وفات یافتہ ہوں۔

    کیا تم اس بات پر خوش ہو کہ تمہارے نبی مدینہ میں زمین کے نیچے

    مدفون ہوں لیکن عیسیٰ اس وقت تک زندہ ہو

    اے بے باکو! خدا سے ڈرو اور یہ پہلا اجماع تھا جو

    تمام صحابہ کے اتفاق سے اسلام میں منعقد ہوا

    اور کوئی فرد بھی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 235

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 235

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/235/mode/1up


    خارجًا منہ کما أنتم تعلمون. وہذا منّۃ

    من الصدّیق رضی اللّہ عنہ علی رقاب المسلمین

    کلہم أنہ أثبتَ بنصّ القرآن موتَ الأنبیاء

    کلہم وموتَ عیسٰی، فہل أنتم شاکرون؟ ثم

    خلَف مِن بعدہم خلفٌ یترکون القرآن

    ویخالفون الرحمٰن وعلی اللّہ یفترون. وقد

    علموا أن القرآن تَوفَّی المسیح، وکرّر البیان

    ازیں اجماع بیرون نماند۔ و ایں احسان

    صدیق است رضی اللّہ عنہ بر گردن ہمہ مسلمانان

    کہ موت ہمہ انبیاء و موت عیسیٰ را بنص قرآن

    ثابت فرمود آیا شکر مے کنید باز

    برجائے ایشاں آں کساں نشستند کہ قرآن را مے گذارند و

    خلاف رحمن مے کنند و بر خدا دروغ مے بندند و

    خوب مے دانند کہ قرآن مسیح را وفات مے دہد و مکرر ایں معنی را

    اس اجماع سے باہر نہ رہا اور یہ حضرت

    صدیق رضی اللّہ عنہ کا تمام مسلمانوں کی گردن پر احسان

    ہے کہ انہوں نے تمام انبیاء کی موت اور عیسیٰ کی موت کو قرآن سے

    ثابت کیا۔ کیا تم مشکور* ہو؟ پھر

    ان کی جگہ وہ لوگ بیٹھے جو قرآن کو چھوڑتے ہیں اور

    رحمن کے خلاف کرتے ہیں اور خدا پر جھوٹ باندھتے ہیں اور

    خوب جانتے ہیں کہ قرآن مسیح کو وفات دیتا ہے اور دوبارہ اس کو صاف



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 236

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 236

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/236/mode/1up


    الصریح، ومنعہ من الصعود إلی السماء ، وبشَّر المسلمین بأن خاتم الخلفاء ومسیح ہذہ

    الأمّۃ لیس إلّا من الأمّۃ، فأیّ مسیح بعدی

    ینتظرون؟وقالوا ما نری ضرورۃ مسیح وکفانا

    القرآن، وقد کذّبوا کتاب اللّہ وہم یعلمون.

    ولو کانوا یتّبعون القرآن لما کذّبونی، لأن

    القرآن یشہد لی ولکنہم کذّبوا، فثبت أنہم

    صاف بیان مے فرماید و از صعود بر آسمان او را باز مے دارد و

    مسلماناں را مژدہ مے دہد کہ خاتم خلفا و مسیح ایں امت از

    ہمیں امت خواہد بود پس بعد ازیں انتظار کدام مسیح

    مے کشند و مے گویند ما احتیاج بمسیح نداریم و

    قرآن مارا کافی است ازیں گفتگو دانستہ کتاب خدا را تکذیب مے کنند

    و اگر اتباع قرآن کردندے تکذیب من نہ نمودندے زیرا کہ

    قرآن گواہی من مے دہد لیکن اوشاں تکذیب مے کنند از ایں جا ثابت شد کہ

    طور پر بیان فرماتا ہے اور آسمان پر چڑھنے سے اس کو روکتا ہے اور

    مسلمانوں کو خوشخبری دیتا ہے کہ خاتم الخلفاء اور اس امت کا مسیح

    اسی امت میں سے ہوگا اب اس کے بعد کون سے مسیح کا

    انتظار کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہم کو مسیح کی ضرورت نہیں اور

    قرآن ہمارے لئے کافی ہے۔ یہ جان بوجھ کر خدا کی کتاب کی تکذیب کر رہے ہیں۔

    اور اگر قرآن کا اتباع کرتے تو میری تکذیب نہ کرتے کیونکہ

    قرآن میری گواہی دیتا ہے لیکن وہ جھٹلاتے ہیں یہاں سے ثابت ہوا کہ وہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 237

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 237

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/237/mode/1up


    یتصلّفون وبالقرآن لا یؤمنون. وتکذِب

    ألسنہم، ولیس فی قلوبہم إلا الدنیا، وإلیہا

    یتمایلون. ویرون أن المُلک قد زُلزل و

    حلَّ السّامُ وہدَّر الحِمامُ ثم لا یرجعون.

    أفلم ینظروا إلی مفاسد الأرض فتکون لہم

    قلوب یعقلون بہا، ولکنہم قوم یستکبرون.

    أیکفرون بآدم ہذا الزمان وقد خُلق علی

    اوشاں لاف بیہودہ مے زنند و با قرآن ایمان ندارند و زبان اوشاں

    حرف دروغ مے زند و در دل اوشاں بغیر حبّ دنیا نیست و بالکلیہ بہ دنیا

    مائل ہستند۔ و مے بینند کہ ملک در زلزلہ و جنبیدن آمدہ و

    مرگ عام نازل شدہ و موت ہمچو کبوتر آواز ہا برداشتہ باز رجوع نمی آرند

    کاش نگاہے بر فساد ہائے زمین مے کردندے تا

    دل دانا چشم بینا باوشاں دست دادے و لیکن اینہا قومے گردن کش ہستند

    آیا انکار آدم ایں زمان مے کنند حالانکہ بر پشت زمین

    بیہودہ لاف مارتے ہیں اور قرآن پر ان کا ایمان نہیں اور ان کی زبان

    جھوٹ بولتی ہے اور ان کے دل میں دنیا کی محبت کے سوا اور کچھ نہیں اور اس کی

    طرف مائل ہیں اور دیکھتے ہیں کہ ملک میں زلزلہ پڑ گیا ہے۔اور

    عام موت پڑ رہی ہے اور موت کبوتر کی طرح آوازیں کر رہی ہے پھر رجوع نہیں کرتے

    کاش! زمین کے فسادوں کو دیکھتے تب ان کی آنکھیں

    کھلتیں اور عقل آتی لیکن یہ ایک متکبر قوم ہے۔

    کیا اس زمانہ کے آدم کا کفر کرتے ہیں حالانکہ زمین کی پیٹھ پر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 238

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 238

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/238/mode/1up


    الأرض مِن کل نوع دابۃ أفلا ینظرون؟ وتراء ی

    بعض الناس کالکلاب، وبعضہم کالذئاب،

    وبعضہم کالخنازیر، وبعضہم کالحمیر،

    وبعضہم کالأفاعی یلدغون. وما مِن حیوان

    إلا وظہر کمثلہ حزبٌ من النّاس وہم

    کمثلہا یعملون. وکذالک فتَقَتِ الأرض

    حقَّ فَتْقہا، ألم یأنِ أن یخلق اللّہ آدم بعدہا

    ہرگونہ دابہ پیدا گردیدہ است آیا نگاہ نمے کنند

    بعضے مردم مانند سگاں گردیدہ اند و بعضے گرگ

    و بعضے خنزیر*

    و بعضے مانند مار نیش مے زنند۔ و ہیچ کدام حیوانے نیست

    کہ گروہے از مردم مانند وے نشدہ و در افعال

    و اعمال مشابہ بہ وے نشدہ اند۔ و ہمچنیں زمین شگافتہ شد

    چنانکہ حق شگافتن بود آیا تا ہنوز وقت نیا مد کہ بعد زیں حیوانات خدا آدم را پیدا کند

    ہر ایک قسم کی دابہ پیدا ہو گیا ہے کیا نہیں دیکھتے

    بعض لوگ کتوں کی طرح ہو گئے ہیں اور بعض بھیڑیوں کی طرح

    اور بعض سؤروں کی طرح

    اور بعض سانپوں کی طرح ڈنگ مارتے ہیں۔ اور ایسا کوئی جانور نہیں

    کہ لوگوں میں سے ایک گروہ اس جیسا نہ ہو گیا ہو اور افعال میں

    اس کے مشابہ نہ ہو اور ایسا ہی زمین بھی ایسی پھٹی جیسے

    پھٹنے کا حق تھا۔ آیا اب تک وقت نہیں آیا کہ ان حیوانات کے بعد خدا آدم کو پیدا کرے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 239

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 239

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/239/mode/1up


    وینفخ فیہ روحہ، ولا تبدیلَ لسُنّۃ اللّہ

    أیہا العاقلون۔ وإذا قیل لہم سارِعوا إلی

    خلیفۃ اللّہ، واتّبعوا ما کشف اللّہ علیہ،

    لعلکم تُرحمون، رأیتَہم تحمرّ أعیُنہم

    من الغیظ، وقالوا ما کان لنا أن نتّبع جاہلا

    ونحن أعلم منہ، فعلیہ أن یبایعنا، أنُبایع

    الذی لا یعلم شیئا وإنّا لعالمون. فلیصبروا

    و روح خود را درو بدمد اے عاقلاں نیکو بدانید کہ سنت اللّہ

    ہرگز تبدیل نمے شود و ہر گاہ بایشاں گفتہ شود کہ ہر چہ زود تر در خدمت

    خلیفۃ اللہ حاضر بشوید و پیروئ ملہمات و مکشوفات او بکنید

    تا بر شما رحم آوردہ شود۔ چشمہائے شاں

    از جوش خشم خون آلود مے گردند و مے گویند مارا چہ شد کہ پیروی جاہلے بکنیم

    حالانکہ ما از وے عالم تر ہستیم بلکہ باید کہ او بیعت ما بکند آیا ما بیعت ہمچو

    شخصے بجا آریم کہ از علم چیزے نداند و ما عالم بزرگ ہستیم پس باید کہ صبر بکنند

    اور اپنی روح اس میں پھونکے اے عقلمندو! خوب جان لو کہ اللّہ کی سنت

    ہرگز نہیں بدلتی اور جس وقت ان سے کہا جائے کہ بہت جلد

    خلیفۃ اللہ کی خدمت میں حاضر ہو جاؤ۔ اور اس کے الہاموں کی پیروی کرو

    تا کہ تم پر رحم کیا جائے ان کی آنکھیں

    غصے سے سرخ ہو جاتی ہیں اور کہتے ہیں کہ ہمیں کیا ہوا کہ ہم ایک جاہل کی پیروی کریں

    حالانکہ ہم اس سے زیادہ عالم ہیں بلکہ چاہیے کہ وہ ہماری بیعت کرے۔ کیا ہم ایسے شخص کی

    بیعت کریں کہ اس کو علم سے کچھ حصہ نہیں اور ہم عالم ہیں۔ پس چاہیے کہ صبر کریں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 240

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 240

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/240/mode/1up


    حتی یرجعوا إلی ربہم ویطّلعوا علی صورہم،

    وذَرْہم وما یکیدون. وقد وسَم اللّہ علی

    خراطیمہم، وأظہر حقیقۃ علومہم، ثم لا

    یتندّمون. وإذا دُعوا إلی الحق تعرف فی

    وجوہہم المنکَر، ویمرّون علینا وہم یسبّون.

    أولئک الذین طبع اللّہ علی قلوبہم، وأعمی

    أبصارہم، وطمس وجوہہم، فہم لا یؤانسون۔

    تا آنکہ بسوئے پروردگار خویش باز بروند و بر صورتہائے خود آگاہ بشوند

    و بگذار او شاں را و بد اندیشی ہائے اوشاں را و آشکار گردیدہ است کہ خدا بربینی ہائے اوشاں

    داغ گذاشتہ و حقیقت علم ایشاں را طشت ازبام فرمودہ بایں ہمہ شرمندہ

    و پشیمان نمے شوند و ہر گاہ ایشاں را بسوئے حق خواندہ شود

    چیں بر جبین مے شوند و دشنام بر زبان از پیش ما مے گزرند

    ایشاں کسانے ہستند کہ خدا بر دل شان مہر زدہ و

    چشم شاں را کور ساختہ و رو ہائے ایشاں نگوں کردہ پس ایشاں انس نمے ورزند

    یہاں تک کہ اپنے پروردگار کے پاس جائیں اور اپنی صورتوں سے واقف ہوں

    اور ان کو اور ان کی بد اندیشیوں کو جانے دے۔ اور ظاہر ہو گیا ہے کہ خدا نے ان کی

    ناکوں پر داغ دیا ہے اور ان کے علم کی حقیقت کو طشت ازبام کر دیا ہے۔ اور باوجود اس

    سب کے شرمندہ اور پشیمان نہیں ہوتے اور جس وقت ان کو حق کی طرف بلایا جائے

    تیوری چڑھاتے ہیں اور گالیاں دیتے گزر جاتے ہیں۔

    یہ وہ لوگ ہیں جن کے دلوں پر خدا نے مہر لگائی اور

    ان کی آنکھ کو اندھا کیا۔ اور ان کے مونہوں کو اوندھا کر دیا پس وہ انس نہیں پکڑتے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 241

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 241

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/241/mode/1up


    وإنہم ینتظرون المسیح من السماء ، ویفرحون بکلمات مدسوسۃ أُدخلت فی الإسلام بسبب النصاری عندما کانوا یُسلِمون. وکیف ینزل الذی أُنزلَ علیہ الإنجیل وقد قال القرآن:مِنْکُمْ*، فہل یُہلَک إلا الکاذبون. أ نُزِّلَ علیہم قرآن آخر،

    و ایشاں چشم در راہ مسیحے از آسمان نشستہ اند و برآں

    کلمات شاد مے شوند و ناز مے کنند کہ نصاریٰ بعد از اسلام آوردن در اسلام

    داخل کردند و چگونہ ممکن است کہ

    آں مسیح نازل شود کہ بر وے انجیل فرود آمد حالانکہ قرآن منکم فرماید

    پس ہلاک نشود مگر شخصے دروغ زن۔ آیا بر ایشاں قرآن دیگر نازل کردہ شدہ

    اور وہ آسمان سے ایک مسیح کے آنے کے منتظر ہیں۔ اور ان باتوں پر

    خوش ہوتے ہیں اور ناز کرتے ہیں جو باتیں نصاریٰ نے اسلام لانے کے بعد

    اسلام میں داخل کیں۔ اور کیونکر ممکن ہے کہ وہ مسیح آئے

    جس پر انجیل اتری تھی حالانکہ قرآن منکم فرماتا ہے۔

    پس جھوٹا ہی ہلاک ہوتا ہے۔ کیا ان پر دوسرا قرآن اترا ہے۔

    سمعت ان بعض الجہال یقولون ان المہدی من بنی فاطمۃ۔ فکیف یقول

    شنیدم کہ بعض جاہلاں مے گویند کہ مہدی از بنی فاطمہ ظہور خواہد کرد۔ پس چگونہ ایں شخص

    ھذا الرجل انی انا المہدی المعہود وانہ لیس منھم فالجواب ان اللّہ

    مہدی معہود تواند شد و ایں از بنی فاطمہ نیست پس جواب ایں است کہ

    یعلم حقیقۃ الاحوال وحقیقۃ النسب والاٰل۔ و معذالک انی انا المہدیالذی

    حقیقت نسب و آل خدا میداند و باوجود ایں من آں مہدی ہستم کہ

    ھو المسیح المنتظر الموعود۔ و ما جاء فیہ انہ من بنی فاطمۃ فاتقوا اللّہ و الساعۃ الحاطمۃ۔منہ

    مسیح موعود است و در ہیچ روایتے نیا مدہ کہ از بنی فاطمہ خواہد بود پس از خدا و از قیامت بترسید۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 242

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 242

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/242/mode/1up


    أو شابہوا الیہودَ فحرّفوا کما کانوا یحرّفون؟

    وإن القرآن قد تَوفَّی المسیح، والمسیحُ أقرّ بہ

    فی القرآن، ألا یتدبّرون قولہ فَلَمَّا تَوَفَّیْتَنی، أم

    علی القلوب أقفالہا أم ہم عمون؟ وإن القرآن

    أشار فی أعداد سورۃ العصر إلی وقتٍ مضٰی

    من آدم إلٰی نبینا بحساب القمر، فعُدّوا

    إن کنتم تشکّون. وإذا تقرّرَ ہذا فاعلموا أنّی

    یا مشابہت با یہوداں پیدا کردہ اند کہ مثل او شاں تحریف را پیشہ گرفتہ اند۔ و ثابت است

    کہ قرآن مسیح را وفات مے بخشد و مسیح در قرآن اعتراف

    بمرگ خود نماید آیا اندیشہ نمی کنند در قول وے فلمّا توفّیتنی یا

    آیا بر دل ایشاں قفل زدہ اند یا کور ہستند و قرآن

    در عدد ہائے سورہ عصر بحساب قمری اشارہ بسوئے وقتے مے کند کہ

    از آدم تا نبیء ما سپری شدہ است پس بشمارید

    اگر شکے دارید۔ و ہر گاہ ایں متحقق شد پس بدانید کہ من

    یا یہودیوں کی طرح ہو کر تحریف کا پیشہ اختیار کیا ہے۔ اور ثابت ہے

    کہ قرآن مسیح کو وفات دیتا ہے اور مسیح قرآن میں اپنی موت کا

    اقرار کرتا ہے کیا اس کے قول فلمّا توفّیتنی میں غور نہیں کرتے یا

    ان کے دلوں پر قفل لگ گئے ہیں یا اندھے ہیں اور قرآن

    سورۃ عصر کے اعداد میں قمری حساب سے اس وقت کی طرف اشارہ کرتا ہے جو

    آدم سے ہمارے نبی تک گذرا ہے پس اگر

    شک ہے تو گن لو۔ اور جب یہ تحقیق ہو گیا تو جان لو کہ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 243

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 243

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/243/mode/1up


    خُلقتُ فی الألف السادس فی آخر أوقاتہ کما خُلق آدم فی الیوم السادس فی آخر ساعاتہ، فلیس لمسیحٍ مِن دونی موضعُ قدم بعد زمانی إن کنتم تفکّرون ولا تظلمون. فأنا صاحب الزمان لا زمان بعدی، فبأی زمان تُنزِلون مسیحکم المفروض أیہا الکاذبون؟ و

    قد اتّفق علی ہذہ العِدّۃ التوراۃُ والإنجیل

    والقرآن، فاسألوا أہل الکتاب إن کنتم ترتابون.

    در آخر اوقات ہزار و ششم آفریدہ شدہ ام چنانکہ آدم

    در روز ششم در ساعت آخری وے مخلوق شد پس بدون من برائے مسیحے دیگر

    جائے قدم گذاشتن بعد وقت من نیست اگر فکر بکنید و

    بیداد اختیار نکنید۔ پس من صاحب زمان منتظر ہستم و بعد از من ہیچ زمانے نیست و آں

    کدام زمان خواہد بود کہ در وے اے دروغ زنان مسیح فرضی و خیالی خود را فرود خواہید آورد

    و بر ایں وقت و زمان تورات و انجیل و قرآن ہمہ متفق ہستند

    اگر شک دارید از اہل کتاب بپرسید۔

    چھٹے ہزار کے آخر اوقات میں پیدا کیا گیا ہوں جیسا کہ آدم

    چھٹے دن میں اس کی آخری ساعت میں پیدا کیا گیا پس میرے سوا دوسرے مسیح

    کے لئے میرے زمانہ کے بعد قدم رکھنے کی جگہ نہیں اگر فکر کرو اور

    ظلم اختیار نہ کرو۔ پس میں صاحب زمان موعود ہوں اور میرے بعد کوئی زمانہ نہیں اور اے جھوٹو!

    وہ کون سا زمانہ ہو گا جس میں تم اپنے فرضی اور خیالی مسیح کو اتارو گے اور

    اس وقت اور زمانہ پر تورات اور انجیل اور قرآن سب متفق ہیں۔

    اگر شک ہے تو اہل کتاب سے پوچھ لو۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 244

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 244

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/244/mode/1up


    وقد مضٰی آخر الألف السادس، وما بقی وقتُ

    نزول المسیح بعدہ، وإن فی ہذا لآیۃ لقوم

    یطلبون. وکان ہذا مِن معالم الموعود فی

    القرآن ویعلمہا المتدبّرون. وإن الألف

    السادس کالیوم السادس الذی خُلق فیہ

    آدم، وإنّ یومًا عند ربک کألف

    سنۃٍ ممّا تعُدّون.

    چنانچہ آخر ہزار ششم بگذشت و بعد ازاں

    برائے نزول مسیح ہیچ وقتے و موقعے نماند و البتہ در ایں برائے طالبان نشانے مے باشد

    و ایں امر در قرآن از نشانہائے آں موعود بود

    وایں را تدبر کنندگاں مے دانند۔ و البتہ ہزار ششم

    چوں آں روز ششم است کہ درو آدم پیدا کردہ شدہ بود

    چنانکہ خداوند حکیم مے فرماید کہ یک یوم نزد پروردگار تو

    چوں ہزار سال است از آنچہ شمار مے کنید۔

    تحقیق ہزار ششم کا آخر گزر گیا۔ اور اس کے بعد

    مسیح کے نازل ہونے کے لئے کوئی وقت اور موقعہ نہ رہا اور البتہ اس میں طالبوں کے لئے ایک

    نشان ہے اور یہ بات قرآن میں اس موعود کی نشانیوں میں سے تھی

    اور اس کو تدبر کرنے والے جانتے ہیں اور البتہ چھٹا ہزار

    اس چھٹے دن کی طرح ہے جس میں آدم پیدا کیا گیا تھا

    جیسا کہ خدا تعالیٰ فرماتا ہے کہ ایک دن تیرے پروردگار کے نزدیک

    ہزار سال کی طرح ہے تمہارے حساب سے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 245

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 245

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/245/mode/1up


    اَلبابُ الخَامِس

    یا أہل الدہاء والاتّقاء من الناظرین! اعلموا

    أن زماننا ہذا ہو آخر الزمان وأنا من الآخِرین.

    وإن یومنا ہذا یوم الجمعۃ حقیقۃً، وقد

    جُمعت فیہ أناسُ دیارٍ وأرضین، وجُمعتْ

    اے ناظرین خدا ترس و دانشمند! آگاہ باشیدہستم

    وایں یوم ما فی الحقیقت یوم جمعہ مے باشد زیرا کہ دریں

    کہ ایں زمانِ ما ہماں آخر زمان است و من از آخرین

    مردم ہر ملک و ہر زمین جمع کردہ شدہ اند و نیز در ایں یوم

    اے خدا ترس اور عقلمند ناظرین! آگاہ رہو

    کہ یہ زمانہ وہی آخری زمانہ ہے اور میں آخرین میں سے ہوں

    اور ہمارا یہ دن درحقیقت جمعہ کا دن ہے کیونکہ اس میں

    ہر ملک اور ہر زمین کے آدمی جمع کئے گئے ہیں اور نیز اس دن میں

    لا یقال ان ساعۃ القیامۃ مخفیۃٌ فلا یجوز ان یقال لزمان انہ ھو اٰخر الازمنۃ

    جائز نیست کہ کسے ایں اعتراض کند کہ ساعت قیامت مخفی است۔ پس چگونہ زمانے را از زمانہ تو ان گفت کہ ایں آخر زمانہ است

    فانا لا نعیّن الساعۃ بل نقول انھا غیر معین فی ھٰذہ الساعات المعینۃ۔ ولا شک انّ القران

    چرا کہ ما ساعت قیامت را معین نمے کنم بلکہ مے گویم کہ آں ساعت دراں ساعت ہائے معینہ نیز غیر معیّن است و ہیچ شک نیست کہ قرآن

    شبّہ الوف الدنیا بایام الخلقۃ فیستنبط من ھذا کل ما قلنا کما لا یخفی علی ذوی الفطنۃ۔منہ

    ہزار ہائے دنیا را بایّام پیدائش تشبیہ دادہ است پس ہمہ آنچہ گفتم ازیں تشبیہ قرآنی ہم استنباط تواں کرد۔ منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 246

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 246

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/246/mode/1up


    کل ما تحتاج إلیہ نفوس الناس من سعادۃ الدنیا

    والدین ومن أنواع العلوم والمعارف وأسرار

    الشرع المتین، وزُوّجت النفوس، فتری کلَّ

    بابورۃ تأتی عند إصباحہا وإمساۂا بأفواج

    من المشرّقین والمغرّبین، وجُمعتْ بہا

    ثمار المشرق والمغرب بإذن اللّہ أرحم الراحمین، وفی آخر الأمر یجمع اللّہ فیہ شَمْلَ دیننا رحمۃً

    ہر چیزے از سعادت دنیا و دین جمع کردہ شدہ است کہ مردم را حاجت بآں افتد

    و نیز ہر گونہ علوم و معارف و اسرار شرع متین

    فراہم آمدہ اند و مردم را باہم تزویج و تعلق پیدا شد چنانچہ

    مے بینید کہ ہر گاری آتشین صبح و شام فوج فوج

    اہل مشرق و مغرب را مے آرد و بسبب آں ثمرہ ہائے

    مشرق و مغرب باذنِ خدا جمع آمدہ اند

    و امید ہست کہ در آخر کار خداوند رحیم پراگندگی دین ما را مبدل بجمعیت خواہد کرد

    دنیا اور دین کی سعادت میں سے ہر ایک چیز جمع کی گئی ہے جس کی طرف لوگوں کو حاجت پڑتی ہے

    اور نیز ہر طرح کے علوم اور معارف اور شرع متین کے اسرار

    جمع ہو گئے ہیں اور لوگوں کے تعلقات آپس میں بڑھ گئے ہیں۔ جیسا کہ دیکھتے

    ہو کہ ہر ایک ریل گاڑی صبح اور شام مشرق اور مغرب کے گروہ در گروہ

    لوگ لاتی ہے اور اس کے باعث مشرق اور مغرب

    کے میوے خدا کے حکم سے جمع ہو گئے ہیں۔

    اور امید ہے کہ آخر کار رحیم خدا ہمارے دین کی پراگندگی کو دور کر دے گا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 247

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 247

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/247/mode/1up


    علی ہذہ الأمّۃ وعلی العالمین، ویُنجّی الخَلق من

    شفا حُفرۃ کانوا علیہا.. وعدٌ من اللّہ وہو

    أصدق الصادقین، ویظہر الإسلام علی الأدیان

    کلہا، وتری جمعًا من کل قوم یدخلون فیہ

    توّابین. فلا شکّ أن زمننا ہذا جُمعۃٌ، تشہد

    الأرض والسماء علیہ، وقد جُمع فیہ کل ما تفرّقَ فی الأوّلین. وإنی خُلقتُ فی ہذہ الجمعۃ فی

    و خلق را از

    کنارہ آں مغاکے رستگار خواہد ساخت کہ براں استادہ اند۔ ایں وعدہ ایست از خدا و او

    صادق ترین راست گویان است و اسلام بر ہمہ دین ہا غالب خواہد آمد

    و جماعت ہا از توبہ و خلوص دل از میان ہر قوم در آں داخل شوند

    پس شکے نیست کہ ایں وقت ما جمعہ ایست کہ آسمان و

    زمین براں گواہی دہند و در وے ہر چیزے جمع گردیدہ کہ در پیشینیاں

    پراگندہ بود۔ و من در ایں جمعہ

    اور خلقت کو اس

    گڑھے کے کنارے سے ہٹا لے گا جس کے کنارے پر کھڑے ہیں۔ یہ خدا کا وعدہ ہے اور وہ

    سب سچ بولنے والوں سے زیادہ سچ بولنے والا ہے۔ اور اسلام سب دینوں پر غالب آئے گا

    اور ہر قوم کی جماعتیں توبہ اور خلوص دل کے ساتھ اس میں داخل ہوں گی۔

    پس کوئی شک نہیں کہ یہ ہمارا وقت جمعہ ہے۔ اور آسمان

    اور زمین اس پر گواہی دیتے ہیں اور اس میں وہ ہر ایک چیز جمع ہو گئی ہے جو اگلوں میں

    پراگندہ تھی۔ اور میں اس جمعہ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 248

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 248

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/248/mode/1up


    ساعۃ العَصر والعُسر للإسلام والمسلمین، کما

    خُلق آدم صفیُّ اللّہ فی آخر ساعۃ الجمعۃ. وإن

    زمانہ کان نموذجا لہذا الحین، وکان وقت

    عصرہ ظلاًّ لہذا العصر الذی عُصِرَ الإسلام

    فیہ وصُبّتْ مصائب علی دیننا، وکادت أن

    تغرب شمس الدین. وترون فی ہذہ الأیام

    أن نور الإسلام قد عُصر من کثرۃ الظلام

    در ساعت عصر و در وقتیکہ اسلام و مسلمانان را عُسر و تنگی فراگرفتہ بود مخلوق شدہ ام

    چنانکہ آدم صفی اللہ در ساعت آخری جمعہ آفریدہ شد و

    البتہ زمانِ آدم برائے ایں وقت بطور نمونہ بود و

    وقت عصر وے بطور ظل برائے ایں عصر بود کہ در وے گلوئے اسلام

    فشردہ شدہ و مصیبت ہا بر دین ما فرو ریختہ و نزدیک است کہ

    آفتاب دین فرو رود و ظاہر است کہ دریں ایّام

    نور اسلام از بسیاری تاریکی و فرومایگان

    عصر کے وقت اور ایسے وقت میں جبکہ اسلام اور مسلمانوں کو تنگی اور عسر نے گھیر لیا تھا پیدا کیا گیا ہوں

    جیسا کہ آدم صفی اللہ جمعہ کے آخری گھڑی میں پیدا کیا گیا اور

    آدم کا زمانہ اس وقت کے لئے بطور نمونہ کے تھا اور

    اس کے عصر کا وقت اس عصر کے لئے سایہ کے طور پر تھا کہ اس میں اسلام کا گلا گھونٹا گیا

    اور ہمارے دین پر مصیبتیں پڑیں اور قریب ہے کہ

    دین کا آفتاب غروب ہو جائے اور ظاہر ہے کہ ان دنوں

    اسلام کا نور تاریکی کی کثرت اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 249

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 249

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/249/mode/1up


    واللئام وصَولِ المخالفین بالأقلام والمکذّبین.

    وکاد أن لا یبقٰی أثر منہ لو لم یتدارکہ فضلُ

    اللّٰہ الکریم المُعین۔ فاقتضتْ غیرۃُ اللّٰہ

    أن یبعث فیہ مجدِّدًا یشابہ آدمَ، فخلَقنی

    فی ہٰذا الیوم فی وقت العصر أعنی ساعۃ

    العسر وعلّمنی من لدنہ وأکرمَ، وأدخلَنی

    فی عبادہ المکرمین، وجعلنی حَکَمًا للأقوام

    حملۂ دشمنان با خامہ ہا و تکذیب کنندگان بکمی آمدہ

    و خیل نزدیک بود کہ اثرے از وے نماندے اگر فضلِ خدائے کریم

    اورا باز نہ جستے چنانچہ از ہمیں سبب است کہ غیرت خدا خواست

    کہ در وے مجددے را مبعوث فرماید کہ با آدم مشابہ باشد۔پس در ایں یوم

    در وقت عصر اعنی در ساعت عُسر مرا

    بیافرید و مرا از پیش خود بیاموخت و بنواخت و در سلک

    بندگان بزرگ خود مرا در آورد۔ و مرا حَکَم ساخت برائے آناں کہ

    لئیموں کی زیادتی اور دشمنوں کے حملوں سے جو قلم کے ساتھ ہیں اور تکذیب کرنے والوں کی

    وجہ سے کم ہو گیا ہے۔ اور قریب تھا کہ اس کا کچھ نشان بھی باقی نہ رہتا اگر خدائے کریم کا

    فضل اس کا تدارک نہ کرتا۔ چنانچہ اسی سبب سے خدا کی غیرت نے تقاضاکیا کہ

    اس میں ایک مجدد کو پیدا کرے جو آدم سے مشابہ ہو۔پس

    اس دن عصر کے وقت یعنی عُسر کے وقت مجھ کو

    پیدا کیا اور مجھ کو اپنے پاس سے سکھایا اور عزت دی اور اپنے

    بزرگ بندوں کے سلسلہ میں مجھ کو داخل کیا۔ اور مجھے ان کے لئے جو اختلاف کرتے ہیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 250

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 250

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/250/mode/1up


    الذین یختلفون وہو أحکم الحاکمین. ورأی

    القومُ أن اللّہ نصرنی، وفی کل أمرٍ أیّدنی، وطرَدوا فآوانی، وصالوا فحمانی، وزاد جماعتی وقوَّی

    سلسلتی، فألقاہم فی التحیّر فضلُ اللّہ علیّ،

    وزادہ سوءُ ظَنّہم، وقالوا أیجعل اللّہ رجلا

    خلیفۃ فی الأرض وہو یفسد فیہا ویسفک

    الدماء ، فأجابہم اللّہ بواسطتی فقال إنّی

    اختلاف مے کنند و او احکم الحاکمین است۔ و مردم آشکار

    دیدہ اند کہ خداوند بزرگ مرانصرت مے بخشد ودر ہر امر تائید من مے کند و مردم مرا براندند

    و لیکن او مرا در پیش خود جابداد و اوشاں برمن فروریختندولے اومرا محفوظ بداشت وجماعت مراافزونی

    بخشید و سلسلہ مرا قوت مرحمت فرمود۔ پس ظن بد وفضلِ خداکہ برمن بود اوشاں رادرحیرت بیفگند

    وگفتند آیا خدا شخصے را

    در زمین خلیفہ مے کند کہ دران خرابی ہاکند و خون ہا فرو ریزد

    پس خدا او شاں را از واسطہ من جواب داد کہ من

    حَکم بنایا اور وہ احکم الحاکمین ہے۔ اور لوگوں نے کھلم کھلا

    دیکھ لیا ہے کہ خداتعالیٰ میری مدد کرتا ہے اور ہر بات میں میری تائید کرتاہے اورلوگوں نے مجھے نکال

    دیا لیکن اُس نے مجھے اپنے پاس جگہ دی اور وہ مجھ پر ٹوٹ پڑے لیکن اُس نے مجھے محفوظ رکھا اورمیری جماعت بڑھائی

    اور میرے سلسلہ کو قوت دی پس بدظنی اور خدا کے فضل نے جو مجھ پر تھا اُن کو حیرت میں ڈالا

    اور کہا کہ کیا خدا ایسے شخص کو خلیفہ

    بناتا ہے جو زمین میں خرابیاں کرے اور خون کرے

    پس خدا نے ان کو میری وساطت سے جواب دیا کہ مَیں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 251

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 251

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/251/mode/1up


    أعلم ما لا تعلمون. وقالوا قُتِل فلان مظلوما،

    وأُریدَ قتلُ فلان من المتنصّرین، ونسبوا

    القتلَ إلیّ لیُدخِلونی فی الذین یفسدون فی

    الأرض ویقتلون الناس ظلمًا وفسادًا، واللّہ

    یعلم أنی بریء منہا، وإنّ کلماتہم ہذہ لیست

    إلا بہتان علیّ، واللّہ علیم بالظالمین، وہناک

    أوحی اللّہ إلیّ حکایۃً عن قولہم’’أتجعل فیہا‘‘

    مے دانم آنچہ شما نمیدانید۔ و گفتند کہ فلاں مظلوم کشتہ شد

    و قتلِ فلاں از نصاریٰ ارادہ کردہ شدہ است و قتل را بمن

    نسبت دادند تا مرا در آنکساں داخل کنند کہ در زمین فساد

    برپا مے کنند و از بے داد و فساد مردم را مے کشند و خدا

    مے داند کہ من ازیں ہا بری ہستم و ایں گفتار ہائے او شاں نسبت بمن بجز

    بہتان و دروغ نیست و خدا ظالمان را نیکو مے داند۔ و ازینجاست کہ

    خدا سوئے من از زبان ایشاں وحی کرد کہ ’’آیا تو خلیفہ مے کنی

    وہ جانتا ہوں جو تم نہیں جانتے اور کہا کہ فلاں مظلوم مارا گیا

    اور فلانے عیسائی کے قتل کا ارادہ کیا گیا ہے۔ اور قتل کو

    میری طرف منسوب کیا تا کہ مجھے اُن لوگوں میں داخل کریں جو زمین میں فساد

    کرتے ہیں اور ظلم اور فساد سے لوگوں کو مار ڈالتے ہیں اور خدا

    جانتا ہے کہ مَیں اُن سے بری ہوں اور اُن کی یہ باتیں جو میری نسبت ہیں بالکل جھوٹی

    اور بہتان ہے اور خدا ظالموں کو خوب جانتا ہے۔ اور اِسی لئے

    خدا نے میری طرف انہی کی زبانی وحی کی کہ ’’کیا تو خلیفہ بناتا ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 252

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 252

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/252/mode/1up


    إلی قولہ ’’إنی أعلم ما لا تعلمون‘‘، عبرۃً للمجترئین۔

    وما جرتْ ہذہ الأقوال علی ألسنہم إلا لیُتمّوا

    نبأ اللّہ الذی سبق من قبل ولیُثبِتوا مضاہاتی

    بآدم فی تہمۃ الفساد وسفک الدماء ، فأجابہم

    اللّہ بوحیہ وقد طُبع وأُشیعَ ہذا الوحی قبلَ

    قتل المشرِک الذی یزعمون فیہ کأنی قتلتُہ

    وقبلَ موتِ نصرانیٍّ یزعمون فیہ کَأنَّ أصحابی

    در زمین‘‘ تا قول ’’من میدانم آنچہ شمانمے دانید‘‘ وایں بجہت آں فرمود کہ جرأت کنندگان راعبرتے

    حاصل آید۔ و ایں گفتارہا بر زبان ایشاں بجہت آں جاری شدہ کہ خبر خداوندی را

    اتمام کنند کہ پیشتر مذکور شدہ بود و بجہت آنکہ مشابہت من با آدم

    در تہمت فساد و خونریزی ثابت کنند پس خدا ایشاں را

    بذریعہ وحی خود جواب داد۔ و ایں وحی پیش از

    قتل آں مشرک کہ دربارہ آں گمان مے کنند کہ من او را کشت ام

    و پیش از موت آں نصرانی کہ نسبت باو گمان مے برند کہ دوستانِ من برائے

    زمین میں‘‘ اس آیت تک کہ انّی اعلم مالا تعلمون۔اور یہ اس لئے فرمایا کہ جرأت کرنے والوں کوعبرت

    حاصل ہو۔ اور یہ باتیں ان کی زبان پر اس لئے جاری ہوئیں تا کہ خداتعالیٰ کی اِس

    خبر کو پوری کریں جو پہلے مذکور ہو چکی اور اس لئے کہ میری مشابہت

    آدم سے فساد اور خونریزی کی تہمت میں ثابت کریں پس خدا نے ان کو

    اپنی وحی کے ذریعہ سے جواب دیا۔ اور یہ وحی

    اس مشرک کے قتل سے پہلے جس کی نسبت اُن کا گمان ہے کہ مَیں نے اُسے قتل کیا ہے

    اور اس نصرانی کی موت سے پہلے جس کی نسبت ان کا گمان ہے کہ میرے دوستوں نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 253

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 253

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/253/mode/1up


    صالوا لقتلہ، فالحمد لِلّہ الذی دافعَ عنی بکلمات

    قیلت فی آدم وہو خیر المدافعین. ہو الذی

    ردَّ بی شمسَ الإسلام بعدما دنت للغروب،

    فکأنّہا طلعتْ من مغربہا وتجلّت للطالبین.

    وإن مَثلی عند ربّی کمثل آدم، وما خُلقتُ إلا

    بعدما کثرتْ علی الأرض النَّعَمُ والسباع والدود

    والضباع وکثر کل نوع الدواب علی ظہرہا،

    قتل وے برو حملہ کردند چاپ و شائع گردیدہ بود۔ پس ستایش برائے آں خدائے کہ از طرف من

    باآں گفتارہا دفاع فرمود کہ در حق آدم گفتہ شدہ بودند۔ وخدا بہترین دفاع کنندگان است۔ہموں

    خدائے کہ بذریعہ من آفتابے اسلام را در وقتیکہ قریب بغروب شدہ بود باز پس گردانید

    پس گویا دیگر بار از مغرب خود طلوع کرد و برائے طالبان تجلّی فرمود

    وہر آئینہ مثل من نزد پروردگار من مثل آدم ہست و من مخلوق نشدہ ام مگر

    بعد ازاں کہ بر زمین چہارپایاں و درندگان و موراں

    و گفتاراں بسیار گردیدند و ہرگونہ وحشی ہا را بر پشت آں بسیارے

    اس کے قتل کے لئے اس پر حملہ کیا چَھپ کر شائع ہو چکی تھی۔پس تعریف ہو اس خدا کی کہ جس نے میری طرف سے

    ان باتوں کے ساتھ مدافعت کی جو آدم کے حق میں کہی گئی تھیں اور خدا سب دفاع کرنے والوں سے بہترہے

    وہی خدا جس نے میرے ذریعہ سے اسلام کے سورج کوجس وقت وہ غروب ہو رہا تھا پھر لوٹایا

    پس گویا پھر اپنے مغرب سے طلوع کیا اور طالبوں کے لئے تجلّی فرمائی

    اور بے شک میرے پروردگار کے نزدیک میری مثال آدم کی مثال ہے اور مَیں پیدانہیں کیا گیا مگر

    اس کے بعد کہ زمین پر چوپائے اور درندے اور چیونٹیاں

    اور بوڑھے بھیڑیے کثرت سے پھیل گئے اور ہر ایک قسم کے وحشیوں نے جہاں تک اُن سے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 254

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 254

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/254/mode/1up


    وخالفَ بعضہا بعضا، وما کان آدم لیملکہم

    ویکون حَکَمًا علیہم وفاتحا بینہم، فجعلنی اللّہ

    آدمَ وأعطانی کل ما أعطی لأبی البشر، وجعلنی

    بُروزًا لخاتم النبیین وسید المرسلین. والسرّ

    فیہ أن اللّہ کان قضی من الأزل أن یخلُق

    آدم الذی ہو خاتم الخلفاء فی آخر الزمان کما

    خلق آدمَ الذی ہو خلیفتہ الأول فی شرخ

    ہر چہ تمام تر حاصل آمد بایکدیگر پرخاش وپیکار آغاز نہادند۔وہیچ آدم نبود کہ زمام اختیار آنہا

    را در دست آورد و برآنہا حَکم گردد و راہ فیصلہ در نزاع آنہا بکشاید۔ لاجرم خدا مرا

    آدم گردانید و مراہمہ آں چیز بخشید کہ بآدم بخشیدہ بود و مرا

    بروز خاتم النّبیین و سید المرسلین بگردانید و کشف ایں

    حقیقت چنان است کہ خدا از ازل ارادہ فرمودہ بود کہ آں آدم را خواہد آفرید

    کہ در آخر زمان خاتم خلفاء خواہد بود چنانکہ

    درآغاز زمان آں آدم را بیافرید کہ خلیفۂ اول او بود

    ہوسکا ایک دوسرے کے ساتھ لڑائی جھگڑے کی بنیاد ڈالی۔ اور کوئی آدم نہ تھا کہ اُن کے اختیار کی

    باگ کو ہاتھ میں لائے اور ان پر حَکم بنے اور اُن کی نزاعوں میں فیصلہ کی راہ نکالے۔ لاجرم خدانے

    مجھ کو آدم بنایا اور مجھ کو وہ سب چیزیں بخشیں اور مجھ کو

    خاتم النبیین اور سید المرسلین کا بروز بنایا اور بھید اس میں

    یہ ہے کہ خدا نے ابتدا سے ارادہ فرمایا تھا کہ اس آدم کو پیدا کرے گا

    کہ آخری زمانہ میں خاتم خلفاء ہوگا جیسا کہ

    زمانہ کے شروع میں اس آدم کو پیدا کیا جو اس کا پہلا خلیفہ تھا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 255

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 255

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/255/mode/1up


    الأوان، لتستدیر دائرۃ الفطرۃ، ولِیُشابہَ الخاتمۃُ

    بالفاتحۃ، ولیکون ہذا التشابہ للتوحید

    کسلطان مبین، ولِیدُلَّ المصنوع علی صانعہ

    بالدلالۃ الصوریّۃ، فإن الہیءۃ المستدیرۃ

    تُضاہی الوحدۃَ، بل تشتمل علی معنی الوحدۃ،

    و لذالک یوجد استدارۃٌ فی کل ما خُلق من

    البسائط، ولا یوجد بسیط خارجًا من الکُرْویۃ.

    و ایں ہمہ سبب آں کرد تادائرہ فطرۃ مستدیر گردد

    و نیز بجہت آنکہ ایں مشابہت برائے توحید

    دلیلے روشن گردد۔ ونیز برائے آنکہ کہ مصنوع با دلالت صوری برصانع

    خویش دلالت نماید۔ زیراکہ ہیئت مستدیر

    مانند وحدت مے گردد بلکہ بر معنی وحدت مشتمل می باشد

    ازینجا است کہ در تمام آفرینش کہ از قسم بسائط است

    استدرات یافتہ مے شود۔ و ہیچ کدام چیزے بسیط از کرویت بیروں نیست

    اور یہ سب کچھ اس لئے کیا کہ فطرت کا دائرہ گول ہو جائے۔

    اور نیز اس لئے کہ یہ مشابہت توحید کے لئے

    ایک روشن دلیل بن جائے۔ اور نیز اس لئے کہ مصنوع صوری دلالت کے ساتھ

    اپنے بنانے والے پر دلالت کرے کیونکہ گول چیز کی ہیئت

    وحدت کی طرح ہو جاتی ہے بلکہ وحدت کے معنوں میں مشتمل ہوتی ہے

    اِسی واسطے بسائط کی قسم کی پیدائش میں گولائی پائی جاتی ہے۔

    اور کوئی بسیط چیز کرویت سے باہر نہیں ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 256

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 256

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/256/mode/1up


    ذالک لیعلم الناس أن اللّہ ہو الأحد الفرد

    الذی صبّغ کلّ ما خلقہ بصبغ الأحدیۃ،

    ولیعرفوا أنہ ہو ربّ العالمین۔ وحاصل الکلام

    أن اللّہ وترٌ یحبّ الوتر، فاقتضتْ وَحْدتُہ أن

    یکون الإنسان الذی ہو خاتم الخلفاء مشابہًا

    بآدم الذی ہو أوّل مَن أُعطیَ خلافۃً عُظمٰی و

    أوّلُ مَن نُفخ فیہ الروح من رَبّ الوریٰ، لیکون

    و ایں بجہت آں ست کہ مردم بدانند کہ خدائے یگانہ و یکتا است

    آنکہ ہمہ آفرینش را برنگ یگانگی رنگین گردانیدہ است

    وبجہت آنکہ بشناسند کہ پروردگار جہاں و جہانیاں ہماں است۔ و حاصل کلام آں کہ

    خدا یکتاست ویکتائی را دوست دارد لاجرم یکتائی او خواست کہ

    آں انسان خاتم خلفاء باشد مشابہ

    بآں آدم بشود کہ اول خلفاء بود

    و اول کسے از مخلوقات بود کہ در وے روح دمیدہ شدہ بود۔ و ایں بجہت آں کرد کہ

    اور یہ اس لئے ہے کہ لوگ جان لیں کہ خدا واحد اور یکتا ہے

    جس نے ساری مخلوقات کو یگانگت کے رنگ سے رنگ دیا ہے

    اور اس لئے تا کہ پہچان لیں کہ جہانون کاپروردگار وہی ہے۔ اور حاصل کلام یہ کہ

    خدا اکیلا ہے اور ایک ہونے کو دوست رکھتا ہے۔ اس لئے اُس کی یکتائی نے چاہا کہ

    کہ وہ انسان جو خلیفوں کا خاتم ہو اُس

    آدم سے مشابہ ہو جو سب خلیفوں کا پہلا تھا اور

    مخلوقات میں اول شخص تھا جس میں خدا کی روح پُھونکی گئی تھی اور یہ اس لئے کیا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 257

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 257

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/257/mode/1up


    زمان نوع البشر کدائرۃ یتصل النقطۃ الآخرۃ

    بنقطتہا الأولٰی، ولیدل علی التوحید الذی دُعی

    إلیہ الإنسان. والتوحید أحبُّ الأشیاء إلی ربّنا

    الأعلی، فاختار وَضْعًا دوریًّا فی خلق الإنسان،

    فلذالک ختَم علی آدم کما کان بدأ من

    آدم فی أوّل الأوان، و إن فی ذالک لآیۃ

    للمتفکّرین۔ وإنّ آدم آخر الزمان حقیقۃً

    زمانہ نوع بشر مانند آں دائرہ گردد کہ نقطۂ آخری وے

    با نقطۂ اوّلینش پیوند مے یابد و نیز بجہت آں کہ دلالت برآں توحید بکند کہ

    انسان را بسوئے آں خواندہ شدہ است و توحید پروردگار مارا محبوب ترین چیزہاست

    ازیں سبب در آفرینش انسان وضع دَوری را اختیار فرمود

    و بہمیں سبب بر آدم ختم نمود چنانکہ در آغاز ابتدا از

    آدم نمود و برائے فکر کنندگان دریں نشان بس

    بزرگ است۔ و آدم آخر زمان درحقیقت

    تا کہ نوع بشر کازمانہ اُس دائرہ کی طرح ہو جائے جس کا آخری نقطہ

    اُس کے پہلے نقطہ سے مل جاتا ہے اور نیز اس لئے کہ اس توحید پر دلالت کرے کہ

    جس کی طرف انسان کو بلایا گیا ہے۔ اور توحید ہمارے پروردگار کو سب چیزوں سے زیادہ

    پیاری ہے۔اس لئے انسان کی پیدائش میں وضع دَوری کو اختیار فرمایا۔

    اور اسی سبب سے آدم پر ختم کیا جیسا کہ شروع میں آدم سے

    ابتدا کیا اور فکر کرنے والوں کے لئے اس میں

    بڑا بھاری نشان ہے اور آخر زمانہ کا آدم در حقیقت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 258

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 258

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/258/mode/1up


    ہو نبیّنا صلّی اللّٰہ علیہ و سلم، والنسبۃ بینی

    وبینہ کنسبۃ مَن علّم وتعلَّمَ، وإلیہ أشار

    سبحانہ فی قولہ’’3 ۱؂ ‘‘ ففَکِّرْ فی قولہ ’’آخَرِینَ‘‘۔وأنزل اللّہ علیَّ

    فیض ہذا الرسول فأتمَّہ وأکملَہ، وجذَب

    إلیَّ لطفہ وجُودَہ، حتّی صار وجودی وجودَہ،

    فمَن دخل فی جماعتی دخل فی صحابۃ

    نبی کریم ماست صلی اللہ علیہ وسلم و نسبت من با جناب وے

    نسبت اُستاد و شاگرد است و بسوئے ہمیں سخن

    اشارہ مے کند قول خداوندی 3

    پس در لفظ آخرین فکر بکنید۔ و خدا بر من

    فیض ایں رسول کریم فرود آورد و آں را کامل گردانید و

    لطف وجود آں نبیء کریم را بسوئے من بکشید تا اینکہ وجود من وجود او گردید

    پس آنکہ در جماعت من داخل شد فی الحقیقت در صحابہ

    ہمارے نبی کریم ہیں صلی اللہ علیہ وسلم اور میری نسبت اُس کی

    جناب کے ساتھ اُستاد اور شاگرد کی نسبت ہے اور خداتعالیٰ کا

    یہ قول کہ 3

    اسی بات کی طرف اشارہ کرتا ہے پس آخرین کے لفظ میں فکر کرو۔ اور خدا نے مجھ پر

    اُس رسول کریم کا فیض نازل فرمایا اور اس کو کامل بنایا اور اس

    نبی کریم کے لطف اور جُود کو میری طرف کھینچا یہاں تک کہ میرا وجود اس کاوجود ہوگیا

    پس وہ جو میری جماعت میں داخل ہوا درحقیقت میرے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 259

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 259

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/259/mode/1up


    سیدی خیر المرسلین۔وہذا ہو معنی وَآخَرِینَ مِنْہُمْ

    کما لا یخفٰی علی المتدبّرین. ومَن فَرّق بینی و

    بین المصطفٰی، فما عرفنی وما رأی. وإن

    نبیّنا صلّی اللّہ علیہ و سلم کان آدمَ خاتمۃِ

    الدنیا ومنتہی الأیام، وخُلِق کآدم بعد

    ما خُلق علی الأرض کلّ نوع من الدواب

    وکلّ صنف من السباع والأنعام، ولمّا خلَق

    آقائے من خیرالمرسلین داخل شد۔ و ہمیں معنیٰ است مر لفظ آخرین منہم را

    چنانکہ بر اندیشہ کنندگان پوشیدہ نیست۔ و آنکہ در من و در مصطفی

    تفریق مے کند او مرا نہ دیدہ است و نہ شناختہ است۔ و ہر آئینہ

    نبیء ما صلی اللہ علیہ وسلم آدم خاتمہ دنیا

    و پایان روزہائے زمانہ بودند و آنحضرت مانند آدم مخلوق شدند

    بعد زاں کہ بر زمین ہر گونہ حشرات

    و وحوش و درندہا پیدا آمدند و ہر گاہ

    سردار خیر المرسلین کے صحابہ میں داخل ہوا اور یہی معنی آخرین منہم کے لفظ کے

    بھی ہیں جیسا کہ سوچنے والوں پر پوشیدہ نہیں اور جو شخص مجھ میں اور مصطفی میں

    تفریق کرتا ہے اُس نے مجھ کو نہیں دیکھا ہے اور نہیں پہچاناہے۔ اور بے شک

    ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم دنیا کے خاتمہ کے آدم

    اور زمانہ کے دنوں کے منتہیٰ تھے اور آنحضرت آدم کی طرح پیدا کیے گئے

    اس کے بعد کہ زمین پر ہر طرح کے کیڑے مکوڑے

    اور چارپائے اور درندے پیدا ہوگئے اور جس وقت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 260

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 260

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/260/mode/1up


    اللّہ ہذہ الخلیقۃ من أنواع النَّعَم والسباع

    والدود علی الأرضین؛ أعنی کلَّ حزب من

    الفاجرین والکافرین، والذین آثروا الدنیا علی

    الدین، وخلَق فی السماء نجومہا وأقمارہا وشموسہا أعنی النفوس المستعدّۃ من الطاہرین المنوّرین،

    خلَق بعد ہذا آدمَ الذی اسمہ محمد وأحمُد،

    وہو سیدُ وُلْدِ آدمَ وأتقی وأسعدُ، وإمامُ

    خدا ایں مخلوق را از انواع وحوش و درندہا

    و مورہا بر زمین بیافرید یعنی ہر گروہے را از

    فاجراں و کافراں۔ و دنیا پرستاں بر روئے کار آورد

    و در آسمان ستارہ ہا و مہتاب ہا و آفتاب ہا

    یعنی نہ نفوسِ مستعدہ را از پاکاں و نورانیاں بظہور آورد

    بعد ازاں آں آدم را خلعت وجود پوشانید کہ اسم او محمد و احمد است صلی اللہ علیہ وسلم

    کہ اوسردار اولاد آدم و امام آفرینش و از جملہ تقی و سعید است

    خدا نے اس مخلوق کو یعنی حیوانوں اور درندوں

    اور چیونٹیوں کو زمین پر پیدا کیا یعنی

    فاجروں اور کافروں اور دنیا پرستوں کے ہر ایک گروہ کو پیدا کیا

    اور آسمان میں ستارے اور چاندوں اور سورجوں

    یعنی پاکوں کے نفوس مستعدہ کو ظہور میں لایا

    تو بعد اس کے اُس آدم کو وجود کا خلعت پہنایا جس کا نام محمد اور احمد ہے صلی اللہ علیہ وسلم

    اور وہ آدم کی اولاد کا سردار اور خلقت کا امام اور سب سے زیادہ تقی اور سعیدہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 261

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 261

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/261/mode/1up


    الخلیقۃ۔وإلیہ أشار اللّہ فی قولہ 3 33 ۱؂ و

    بعزۃ اللّہ و جلالہ أنّ لفظ إِذْ یدلّ بدلالۃ

    قطعیۃ علی ہذا المقصود، ویدل علیہ سیاق

    الآیۃ وسباقہا إن کنتَ لست کالیہود. فلا

    شک أنہ آدمُ آخر الزمان، والأُمّۃُ کالذُرّیۃ

    لہذا النبی المحمود، وإلیہ أشار فی قولہ إِنَّا

    و بسوئے ایں اشارہ مے کند قول خداوندی 3

    3۔۔۔۔الآیۃ و قسم

    بعزۃ خداوندی و جلال وے کہ لفظ اذ بادلالت قطعی

    بریں مقصود دلالت مے کند

    واگر تو مانند یہود نیستی سیاق و سباق آیت بر تو ایں راز را بکشاید

    پس شک نیست کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم آدم آخرالزمان است وامت بجائے ذرّیت

    ایں نبی محمود است۔ و بسوئے ایں اشارہ مے کند قول خداوندی

    اور اس کی طرف خداتعالیٰ کا یہ قول اشارہ کرتا ہے 3

    3الآیۃ اور خدا

    کی عزت اور جلال کی قسم کہ اذ کا لفظ قطعی دلالت کے ساتھ

    اس مقصود پر دلالت کرتا ہے۔

    اور اگر تو یہود کی طرح نہیں آیت کا سیاق و سباق تجھ پر اس راز کو کھول دے گا

    پس شک نہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم آخر زمانہ کے آدم ہیں اورامت اس نبی محمود کی ذرّیت

    کی بجا ہے۔ اور اس کی طرف خدا تعالیٰ کے اس قول کا اشارہ ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 262

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 262

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/262/mode/1up


    أَعْطَیْنَاکَ الْکَوْثَرَ. فأمعِنْ فیہ وتَفکّرْ، ولا

    تکن من الغافلین.وإن زمان روحانیۃ

    نبیّنا علیہ السلام قد بدأ من الألف الخامس

    وکمُل إلی آخر الألف السادس، وإلیہ أشار

    فی قولہِ3 ۱؂ وتفصیل

    المقام أن نبیّناصلی اللّہ علیہ وسلم قد

    جاء علی قدمِ آدم، وأن روحانیۃ آدم قد

    انا اعطینٰک الکوثر پس دریں معنیٰ نگاہ و فکر بکن و

    از غافلاں مباش و زمانہ روحانیت نبی ما

    از الف پنجم آغاز

    و تا آخر الف ششم کامل شد و بسوئے ایں اشارہ مے کند

    قول خداوندی کہ 3 و تفصیل ایں

    مقام آنکہ نبیء ما صلی اللّہ علیہ وسلم

    بر قدم آدم آمد و روحانیت آدم

    انا اعطینٰک الکوثر پس ان معنوں میں غور اور فکر کر اور

    غافلوں میں سے مت ہو۔ اور ہمارے نبی کی روحانیت کا زمانہ

    پانچویں ہزار سے شروع

    اور چھٹے ہزار کے آخر تک کامل ہوا اور اس کی طرف

    خدا تعالیٰ کا قول اشارہ کرتا ہے کہ 3 اور اس مقام کی تفصیل

    یہ ہے کہ ہمارے نبی صلی اللّہ علیہ وسلم

    آدم کے قدم پر آئے اور آدم کی روحانیت نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 263

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 263

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/263/mode/1up


    طلعت فی الیوم الخامس لِمَا خُلق إلی ہذا

    الیوم کلّ ما کان من أجزاء ہویّتہ وحقیقۃ

    ماہیّتہ، فإن الأرض بجمیع مخلوقاتہا و

    السماء بجمیع مصنوعاتہا کانت حقیقۃَ

    ہویّۃِ آدم، کَأَنَّ مادّتَہ قد انتقلت من

    الحقیقۃ الجمادیۃ إلی الحقیقۃ النباتیۃ، ثم

    من الحقیقۃ النباتیۃ إلی الہویّۃ الحیوانیّۃ، ثم

    در روز پنجم طلوع فرمود زیراکہ تا ایں روز

    ہمہ آنچہ از اجزائے ہویت و حقیقت

    ماہیت وے بود پیدا گردید۔ چہ کہ زمین مع ہمہ مخلوقات وے و

    آسمان با جملہ مصنوعات وے حقیقت

    ہویتِ آدم بود گویا مادۂ آدم

    از حقیقت جمادی بسوئے حقیقت نباتی و

    از حقیقت نباتی بسوئے ہویت حیوانیت منتقل شد باز

    پانچویں دن مین طلوع فرمایا کیونکہ اس دن تک

    سب کچھ جو اس کی ہویت کے اجزاء سے اور اسکی ماہیت

    کی حقیقت سے تھا پیدا ہو گیا۔ کیونکہ زمین اپنی تمام مخلوق کے ساتھ اور

    آسمان اپنی تمام مصنوعات کے ساتھ آدم کی

    ہویت کی حقیقت تھے۔ گویا آدم کا مادہ

    جمادی حقیقت سے نباتی حقیقت کی طرف اور

    نباتی حقیقت سے حیوانیت کی ہویت کی طرف منتقل ہوا پھر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 264

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 264

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/264/mode/1up


    بعد ذالک انتقلت من حیث الروحانیۃ من

    الکمالات الکوکبیۃ إلی الکمالات القمریۃ، ومن الأنوار القمریۃ إلی الأشعّۃ الشمسیۃ، وکانت

    ہذہ الانتقالات کلہا مَظاہِرَ ترقّیاتِ العالم

    إلی معارج الحقیقۃ الإنسانیۃ. کَأَنَّ الإنسان

    کان فی وقتٍ جمادًا،وفی وقتٍ آخر نباتا، وبعد

    ذالک حیوانا، وبعد ذالک کوکبًا وقمرا وشمسا

    از راہ روحانیت

    از کمالات کوکبیت بسوئے کمالاتِ قمریت و از

    انوارِ قمریت بسوئے شعاعہائے شمسیت انتقال فرمود و

    ایں ہمہ انتقالات مظاہر ترقیات عالم

    بسوئے معارج حقیقت انسانیت بودند۔ و ایں راز را در لفظ دیگر بایں طور تواں فہمید

    کہ انسان در وقتے جماد بود و وقتے دیگر نبات و بعد ازاں

    حیوان وبعد ازاں کوکب و قمر و شمس بود

    روحانیت کے طور پر

    کوکبی کمالات سے قمری کمالات کی طرف اور

    قمری انوار سے شمسی شعاعوں کی طرف انتقال فرمایا (اور

    یہ سب انتقالات مظاہر ترقیات عالم کے

    حقیقت انسانیہ کے معارج کی طرف تھے)*۔ اور اس راز کودوسرے لفظوں میں اس طرح پر سمجھنا چاہیے

    کہ انسان ایک وقت جماد تھا اور دوسرے وقت نبات اور اس کے بعد

    حیوان اور اس کے بعد ستارہ اور چاند اور سورج تھا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 265

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 265

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/265/mode/1up


    حتی جُمِع فی الیوم الخامس کلّ ما اقتضت فطرتُہ

    من القوی الأرضیۃ والسماویۃ بفضل اللّہ أحسن الخالقین. فکان الخَلق کلہ فردًا کاملا لآدم، أو

    مِرآۃً لوجودہ الذی أعزّہ اللّہ وأکرم. ثم أراد

    اللّہ أن یُرِیَ ہذہ الخفایا علی وجہ الکمال فی

    شخصٍ واحدٍ ہو مظہر جمیع ہذہ الخصال،

    فتجلّت روحانیۃُ آدم بالتجلّی الجامع الکامل

    تا آنکہ روز پنجم آنچہ فطرت او

    از قوائے زمینی و آسمانی تقاضا مے کرد بفضل خدائے احسن الخالقین

    جمع گردیدند۔ پس ہمہ آفرینش برائے آدم یک فرد کامل بود یا

    آئینہ وجود او بود کہ خدا او را خلعت عزت و کرامت در بر کرد۔ باز ارادہ

    فرمود کہ پوشیدگی ہا را بر وجہ کمال در شخصے واحد آشکارا نماید

    کہ او مظہر ایں ہمہ خصال باشد

    لاجرم روحانیت آدم باتجلّی جامع کامل

    یہاں تک پانچویں دن وہ سب کچھ جو اس کی فطرت

    زمینی اور آسمانی قویٰ سے تقاضا کرتی تھی احسن الخالقین خدا کے فضل سے

    جمع ہو گیا۔ پس تمام پیدائش آدم کے لئے ایک فرد کامل تھا یا

    اس کے وجود کا آئینہ تھا جسے خدا نے معزز اور مکرم بنایا پھر ارادہ فرمایا

    کہ پوشیدگیوں کو پورے طور پر ایک ہی شخص میں ظاہر کرے

    جو ان خصلتوں کا مظہر ہو۔

    پس آدم کی روحانیت نے جامع کامل تجلّی کے ساتھ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 266

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 266

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/266/mode/1up


    فی الساعۃ الآخرۃ من الجمعۃ، أعنی الیوم

    الذی ہو السادس من الستّۃ. فکذالک طلعَتْ

    روحانیۃُ نبیّناصلی اللّہ علیہ وسلم فی الألف

    الخامس بإجمال صفاتہا، وما کان ذالک الزمان منتہی ترقّیاتہا، بل کانت قدمًا أولی لمعارج

    کمالاتہا، ثم کمُلتْ وتجلّت تلک الروحانیۃ فی

    آخر الألف السادس، أعنی فی ہذا الحین کما

    در ساعت آخری روز جمعہ تجلّی فرمود یعنی در روزے کہ

    ششم ششاست ہم چنیں

    روحانیت نبی کریم ما صلی اللہ علیہ وسلم در ہزار

    پنجم با صفات اجمالی ہویدا شد و آں زمان

    پایان ترقیات آں روحانیت نبود بلکہ برائے معراج کمالات وے

    گام نخستین بود باز آں روحانیت

    در آخر الف ششم یعنی دریں وقت از راہ کمال تجلّی فرمود چنانکہ

    جمعہ کے دن آخری ساعت مین تجلّی فرمائی یعنی اس دن

    جو چھ کا چھٹا ہے اسی طرح

    ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی روحانیت نے پانچویں ہزار

    میں اجمالی صفات کے ساتھ ظہور فرمایا اور وہ زمانہ

    اُس روحانیت کی ترقیات کا انتہا نہ تھا بلکہ اس کے کمالات کے معراج کے لئے

    پہلا قدم تھا پھر اس روحانیت نے

    چھٹے ہزار کے آخر میں یعنی اس وقت پوری طرح سے تجلّی فرمائی جیسا کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 267

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 267

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/267/mode/1up


    خُلق آدم فی آخر الیوم السادس بإذن اللّہ

    أحسن الخالقین. واتخذتْ روحانیۃُ نبیّنا

    خیر الرسل مَظہرًا مِن أُمّتہ لتبلغ کمالَ ظہورہا

    وغلبۃَ نورہا کما کان وعد اللّہ فی الکتاب المبین.

    فأنا ذالک المظہر الموعود والنور المعہود،

    فآمِنْ ولا تکنْ من الکافرین. وإن شئتَ

    فاقرء قولہ تعالٰی 3

    آدم در آخر روز ششم باذن خدائے

    احسن الخالقین مخلوق شد و روحانیت خیر رسل

    برائے کمال ظہور

    و غلبہ نور خویش مظہرے اختیار کرد۔ چنانکہ خدائے تعالیٰ در کتاب مبین وعدہ فرمودہ بود

    پس من ہماں مظہر موعود و نور معہود ہستم

    پس ایمان بیار و از کافراں مباش و اگر مے خواہی

    بخواں ایں قول خداوندی را ھو الذی ارسل رسولہ بالھدیٰ الآیۃ

    آدم چھٹے دن کے آخر میں احسن الخالقین خدا کے اذن

    سے پیدا ہوا اور خیر الرسل کی روحانیت

    نے اپنے ظہور کے کمال کے لئے

    اور اپنے نور کے غلبہ کے لئے ایک مظہر اختیارکیا جیسا کہ خدا تعالیٰ نے کتاب مبین میں وعدہ فرمایا تھا

    پس مَیں وہی مظہر ہوں

    پس ایمان لا اور کافروں سے مت ہو اور اگر چاہتا ہے

    تو اس خدا کے قول کو پڑھ ھو الذی ارسل رسولہ بالھدیٰ آخر آیت تک۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 268

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 268

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/268/mode/1up



    33 ۱؂ ، وفَکِّرْ

    کالمہتدین. فہذا وقت الإظہار، ووقت کمال

    ظہور الروحانیۃ من الجَبّار، یا معشر المسلمین. ولأجل ذالک جاء فی الآثار أنہ علیہ السلام

    بُعث فی الألف السادس مع أنّ بعثہ کان

    فی الألف الخامس بالقطع والیقین. فلا شک

    أن ہذہ إشارۃ إلی وقت التجلّی التام و

    پس ایں وقت اظہار و وقت کمال ظہور

    روحانیت است اے گروہ مسلماناں

    و ازینجاست کہ در آثار آمدہ کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم

    در ہزار ششم مبعوث شدند حالانکہ بعثت آنجناب

    قطعاً و یقیناًدر ہزار پنجم بود۔ پس شک نیست

    کہ ایں اشارہ است بسوئے وقتِ تجلّی تام و

    پس یہ اظہار کا وقت اور

    روحانیت کے ظہور کے کمال کا وقت ہے اے مسلمانوں کی جماعت۔

    اور اسی لئے آثار میں آیا ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم

    چھٹے ہزار میں مبعوث ہوئے حالانکہ آنجناب کی بعثت

    قطعاً اور یقیناًپانچویں ہزار میں تھی پس شک نہیں

    کہ یہ اشارہ ہے تجلّی تام کے وقت کی طرف اور



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 269

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 269

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/269/mode/1up


    استیفاء المرام وکمال ظہور الروحانیۃ و

    أیام تموُّج الفیوض المحمّدیۃ فی العالمین،

    وہو آخر الألف السادس الذی ہو الزمان المعہود لنزول المسیح الموعود کما یُفہَم من کتب النبیین. وإن ہذا الزمان ہو موطأُ قدمہ علیہ السلام

    من الحضرۃ الأحدیۃ، کما یُفہَم من آیۃ’’وَآخَرِینَ

    مِنْہُمْ‘‘ وآیات أخری من الصحف المطہّرۃ،

    استیفاء مرام و کمال ظہور روحانیت

    و روزہائے موج زدن فیوض محمدیت در جہان

    و ایں آخر ہزار ششم است کہ برائے

    نزول مسیح موعود زمان معہود است چنانکہ از کُتب انبیاء فہمیدہ مے شود

    و ایں زمان بالیقین موضع سپردن پائے آنحضرت است

    از حضرت احدیت چنانکہ از آیت وآخرین منھم

    و آیات دیگر از نوشتہائے پاک مفہوم مے شود

    استیفاء مرام کی طرف اور روحانیت کے ظہور کے کمال کی طرف

    اور جہان مین محمدی فیوض کے موج مارنے کے دنوں کی طرف۔

    اور یہ چھٹے ہزار کا آخر ہے جو زمانہ

    مسیح موعود کے اُترنے کے لئے مقرر ہے۔جیسا کہ انبیاء کی کتابوں سے سمجھا جاتا ہے۔

    اور یہ زمانہ یقیناًخدا تعالیٰ کی طرف سے آنحضرت کے

    قدم رکھنے کی جگہ ہے جیسا کہ آیت وآخرین منھم

    اور پاک تحریروں کی دوسری آیتوں سے مفہوم ہوتا ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 270

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 270

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/270/mode/1up


    ففکّرْ إن کنت من العاقلین. واعلم أن

    نبیّناصلی اللّہ علیہ وسلم کما بُعث فی الألف

    الخامس کذالک بُعث فی آخر الألف السادس باتخاذہ بروز المسیح الموعود، وذالک ثابت

    بنص القرآن فلا سبیل إلی الجحود، ولا ینکرہ

    إلا الذی کان من العمین. ألا تفکّرون فی

    آیۃ’’وَآخَرِینَ مِنْہُمْ‘‘، وکیف یتحقّق مفہوم

    پس فکر کن اگر از عاقلاں ہستی۔ و بداں کہ

    نبی کریم ما صلی اللہ علیہ وسلم چنانکہ در ہزار پنجم

    مبعوث شدند ہمچناں از اختیار کردن صورت بروزی

    مسیح موعود در آخر ہزار ششم مبعوث شدند و ایں

    با نص قرآن ثابت است کہ انکار را در آں گنجائش نیست

    و بجز نابینایاں کسے ازیں معنے سر باز نمے زند۔آیا در آیت

    آخرین منھم فکر نمے کنید و چگونہ مفہوم لفظ

    پس اگر تو عقلمند ہے تو فکر کر۔ اور جان کہ

    ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم جیسا کہ پانچویں ہزار میں

    مبعوث ہوئے ایسا ہی مسیح موعود کی بروزی صورت

    اختیار کر کے چھٹے ہزار کے آخر میں مبعوث ہوئے۔اور یہ

    قرآن سے ثابت ہے اِس میں انکار کی گنجائش نہیں

    اور بجز اندھوں کے کوئی اس کے معنے سے سر نہیں پھیرتا۔ کیا

    آخرین منھم کی آیت میں فکر نہیں کرتے۔ اور کس طرح منھم کے لفظ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 271

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 271

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/271/mode/1up


    لفظ ’’مِِنْہُمْ‘‘ مِن غیر أن یکون الرسول موجودًا

    فی الآخِرین کما کان فی الأوّلین۔ فلا بد من

    تسلیم ما ذکرناہ ولا مَفَرَّ للمنکرین. و

    من أنکر من أنّ بعْث النبی علیہ السلام

    یتعلّق بالألف السادس کتعلّقہ بالألف

    الخامس، فقد أنکر الحق ونصَّ الفرقانِ، وصار

    من الظالمین. بل الحق أن روحانیتہٗ علیہ

    منھم متحقق شود اگر رسول کریم در آخرین موجود

    نباشد ہمچناں کہ در اوّلین موجود بود پس از

    تسلیم آنچہ ذکر کردیم چارۂ نیست و برائے منکراں راہ گریز بند است و

    آں کہ ازیں معنیٰ انکار کرد کہ بعثت نبی علیہ السلام

    با ہزار ششم تعلق دارد ہمچناں کہ با ہزار پنجم

    تعلق داشت او یقیناًدست رد بر سرحق و نص قرآن زد و از

    ظالماں گردید بلکہ حق آنکہ روحانیت آنحضرت علیہ السلام

    کا مفہوم متحقق ہو اگر رسول کریم آخرین میں موجود

    نہ ہوں جیسا کہ پہلوں میں موجود تھے پس جو کچھ

    ہم نے ذکر کیا اُس کی تسلیم سے چارہ نہیں اور منکروں کے لئے بھاگنے کا رستہ بند ہے اور

    جس نے اس بات سے انکار کیا کہ نبی علیہ السلام کی بعثت

    چھٹے ہزار سے تعلق رکھتی ہے جیسا کہ پانچویں ہزار سے

    تعلق رکھتی تھی پس اُس نے حق کا اور نص قرآن کا انکار کیا۔

    بلکہ حق یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی روحانیت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 272

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 272

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/272/mode/1up


    السّلام کان فی آخر الألف السادس أعنی فی

    ہذہ الأیام أشدَّ وأقوٰی وأکملَ من تلک

    الأعوام، بل کالبدر التامّ، ولذالک لا نحتاج

    إلی الحُسام، ولا إلی حزبٍ من محاربین، و

    لأجل ذالک اختار اللّہ سبحانہ لبعث المسیح

    الموعود عِدّۃً من المئات کعِدّۃ لیلۃِ البدر من

    ہجرۃ سیدنا خیر الکائنات لتدلّ تلک العِدّۃ

    در آخر ہزار ششم یعنی

    دریں ایام نسبت بآں سالہا اکمل و اقویٰ و اشد است

    بلکہ مانند بدر کامل است۔ ازینجاست کہ ما احتیاج

    بشمشیر و گروہ رزم آوراں نداریم و

    بجہت ہمیں معنی است کہ خداوند سبحانہٗ و تعالیٰ برائے بعثت مسیح موعود

    شمار صدہارا مانند شمار شب بدر از

    ہجرت رسول کریم اختیار فرمود تا آں شمار بر مرتبہ کہ

    چھٹے ہزار کے آخر میں یعنی

    اِن دنوں میں بہ نسبت اُن سالوں کے اقویٰ اور اکمل اور اشد ہے۔

    بلکہ چودہویں رات کے چاند کی طرح ہے۔ اور اس لئے ہم

    تلوار اور لڑنے والے گروہ کے محتاج نہیں اور

    اسی لئے خدا تعالیٰ نے مسیح موعود کی بعثت کے لئے

    صدیوں کے شمار کو رسول کریم کی ہجرت کے بدر کی راتوں

    کے شمار کی مانند اختیار فرمایا تا وہ شمار اس مرتبہ پر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 273

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 273

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/273/mode/1up


    علی مرتبۃ کمال تام من مراتب الترقّیات و

    ہی الماءۃ الرابع بعد الألف من خاتم النبیین،

    لیتم وعد إظہار الدین الذی سبق فی الکتاب

    المبین، أعنی قولہ’’ 3

    3۱؂ ‘‘، فانظرْ إلی ہذہ الآیۃ کالمُبْصرین،

    فإنہا تدل علی البدرَیْن بالیقین. بدرٌ مضت

    لنصر الأوّلین، وبدرٌ کانت آیۃ لّلآخِرین.

    از جملہ مراتب ترقیات کمالِ تام دارد دلالت کند و

    آں شمار چہار صد بعد از ہزار از ہجرت خاتم النبیین است

    تا وعدہ اظہار دین کہ در کتاب مبین سابق شدہ بود باتمام رسد

    اعنی قول خداوندی لقد نصرکم اللہ ببدر وانتم اذلّۃ

    پس مانند بینایاں دریں آیت نگاہ بکن

    چہ کہ ایں آیت یقیناًبر دو بدر دلالت کند اول آں بدر کہ برائے

    نصرت نخستینیاں بگذشت و دوم آں بدر کہ برائے پسینیاں نشانے بودہ است

    جو ترقیات کے تمام مرتبوں سے کمال تام رکھتا ہے دلالت کرے اور

    وہ چار سو کا شمار خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کی ہجرت سے بعد ہے۔

    تادین کے غلبہ کا وعدہ جو کتاب مبین میں پہلے ہو چکا تھا پورا ہو جائے

    یعنی خدا کا یہ قول کہ لقد نصرکم اللہ ببدر وانتم اذلّۃ

    پس بیناؤں کی طرح اس آیت میں نگاہ کر

    کیونکہ یہ آیت یقیناًدو بدر پر دلالت کرتی ہے اوّل وہ بدر جو

    پہلوں کی نصرت کے لئے گزرا اور دوسرا وہ بدر جو پچھلوں کے لئے ایک نشان ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 274

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 274

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/274/mode/1up


    فلا شک أن فی ہذہ الآیۃ إشارۃ لطیفۃ إلی

    الزمان الآتی الذی یُشابہ لیلۃَ البدر عِدّۃً۔

    أعنی سنۃ أربع ماءۃ بعد الألف وہی لیلۃ

    البدر استعارۃً عند ربّ العالمین، و إنْ

    کان للآیۃ معنی آخر یتعلق بالزمان الماضی

    مع ہذا المعنی کما لا یخفٰی علی العالِمین.

    فإنّ للآیۃ وجہین، والنصر نصران، والبدر

    پس شکے نیست کہ ایں آیت اشارۂ لطیفہ بآں زمان آئندہ

    مے کند کہ از روئے شمار مانند شب بدر باشد

    وآں سنہء چہار صد بعد از ہزار است و ہمیں بطور استعارہ

    نزد پروردگار گیہاں شب بدر است۔ وباایں ہمہ اعتراف

    مے کنیم کہ ایں آیت معنیٰ دیگر ہم دارد کہ با زمان گزشتہ متعلق مے باشد

    چنانچہ بر عالماں پوشیدہ نیست

    زیرا کہ ایں آیت را دو رُخ است و نصرت دوگانہ و بدر

    پس کوئی شک نہیں کہ یہ آیت ایک لطیف اشارہ اس آئندہ زمانہ

    کی طرف کرتی ہے جو شمار کے رو سے شب بدر کی مانند ہو۔

    اور وہ چار سو برس ہزار برس کے بعد ہے اور یہی استعارہ کے طور پر

    خداتعالیٰ کے نزدیک شبِ بدر ہے اور ان سب کے باوجود

    ہم کو یہ بھی اعتراف ہے کہ اس آیت کے اور معنی بھی ہیں جو گزشتہ زمانہ سے تعلق رکھتے ہیں

    جیسا کہ عالموں کو معلوم ہے۔

    کیونکہ اس آیت کے دو رُخ ہیں اور نصرت دو نصرتیں اور بدر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 275

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 275

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/275/mode/1up


    بدران، بدرٌ تتعلق بالماضی، وبدرٌ تتعلق

    بالاستقبال من الزمان عند ذلّۃ تصیب المسلمین

    کما ترون فی ہذا الأوان، وکان الإسلام بدأ

    کالہلال وکان قُدّر أنہ سیکون بدرًا فی

    آخر الزمان والمآل بإذن اللّہ ذی الجلال،

    فَاقتضت حکمۃُ اللّہ أن یکون الإسلام بدرًا

    فی ماءۃ تشابہُ البدر عِدّۃً۔ فإلیہ أشار فی

    دو تا بدر است۔ یک بدر با زمان گزشتہ تعلق دارد و بدر دیگر با زمان

    آئندہ در ہنگامے کہ مسلمانان را ذلت برسد

    چنانکہ در ایں زمان مے بینید۔ و اسلام چوں ہلال آغاز شد

    و مقدر بود کہ انجام کار در آخر زمان بدر

    خواہد شد باذن خدائے ذوالجلال

    پس حکمت خداوندی خواست کہ اسلام دران صد

    شکل بدری اختیار کند کہ از روئے شمار با بدر مشابہ باشد۔ پس بہمیں معنی اشارہ مے کند

    دو بدر ہیں ایک بدر گزشتہ زمانہ سے تعلق رکھتا ہے اور دوسرا بدر

    آئندہ زمانہ سے اس وقت جبکہ مسلمانوں کو ذلت پہنچے

    جیساکہ اس زمانہ میں دیکھتے ہو اور اسلام ہلال کی طرح شروع ہوا

    اور مقدر تھا کہ انجام کار آخر زمانہ بدر

    ہو جائے خداتعالیٰ کے حکم سے۔

    پس خداتعالیٰ کی حکمت نے چاہا کہ اسلام اُس صدی میں بدر کی طرح شکل

    اختیار کرے جو شمار کے رو سے بدر کی طرح مشابہ ہو۔ پس انہی معنوں کی طرف اشارہ ہے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 276

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 276

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/276/mode/1up


    قولہ’’لَقَدْ نَصَرَکُمُ اللّٰہُ بِبَدْرٍ‘‘، ففکّرْ فکرۃ

    کاملۃ ولا تکن من الغافلین۔وإن لفظ ’’لَقَدْ

    نَصَرَکُمْ‘‘ قد أتی ہنا علٰی وجہٍ آخر أعنی بمعنی ینصرکم کما لا یخفی علی العارفین۔فحاصل الکلام أن اللّہ کان قدقدّرللإسلام العزّتین بعدالذلّتین علی رغم الیہودالذین کان قدّر لہم الذلّتین بعدالعزّتین نکالامن

    عندہ کما تقرء ون فی سورۃ بنی إسرائیل قصۃ الفاسقین منہم

    قول خداوندی لقد نصرکم اللہ ببدر۔ پس نگاہ باریک دریں امر بفرما

    واز غافلاں مباش۔ و ہر آئینہ لفظ

    لقد نصرکم اینجا از روئے وجہ دیگر و معنی بمعنی ینصرکم آمدہ

    چنانکہ برعارفاں ظاہر است۔ الغرض

    خداتعالیٰ برائے اسلام بعد از دو ذلت دو عزت اندازہ کردہ بود بر خلاف یہود

    کہ برائے اوشاں بطور سزا و پاداش بعد از دو عزت دو ذلت اندازہ کردہ بود

    چنانکہ در سورہ بنی اسرائیل قصۂ فاسقان و ظالمان را

    خداتعالیٰ کے اس قول میں کہ لقد نصرکم اللہ ببدر۔ پس اس امر میں باریک نظر سے غور کر

    اور غافلوں سے نہ ہو اور بے شک

    لقد نصرکم کا لفظ یہاں دوسری وجہ کے رو سے ینصرکم کے معنوں میں آیا ہے۔

    جیسا کہ عارفوں پر ظاہر ہے۔ الغرض

    خداتعالیٰ نے اسلام کے لئے دو ذلت کے بعد دو عزتیں رکھی تھیں یہود کے برخلاف

    کہ ان کے لئے سزا کے طور پر دو عزتوں کے بعد دو ذلتیں مقرر کی تھیں

    جیسا کہ بنی اسرائیل کی سورۃ میں اُن فاسقوں اور ظالموں کا قصہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 277

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 277

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/277/mode/1up


    والظالمین. فلمّا أصاب المسلمین الذلّۃُ الأولی

    فی مکّۃ وعَدہم اللّہ بقولہ’’ 3

    33 ۱؂‘‘و

    أشار فی قولہ’’عَلَی نَصْرِہِمْ‘‘ أنّ العذاب یصیب الکفّار بأیدی المؤمنین، فأنجز اللّہ ہذا

    الوعد یوم بدرٍ وقتل الکافرین بسیوف

    المسلمین. ثم أخبر عن الذلّۃ الثّانیّۃ

    ازیشاں مے خوانید۔ پس ہر گاہ مسلمانان را ذلت اول

    در مکہ رسید۔ خداباوشاں از ایں قول وعدہ فرمودہ بود اذن للذ ین یقاتلون الآیۃ

    و از قول علٰی نصرھم اشارہ کرد کہ از دست مومناں عذاب

    بر سر کفار فرود خواہد آورد۔ پس ایں وعدۂ خداوندی

    روز بدر بظہور رسید و کافران عرضہ شمشیر آبدار مسلماناں

    گردیدند۔ باز از ذلت دوم خبرداد

    پڑھتے ہو۔ پس جس وقت مسلمانوں کو پہلی ذلت

    مکہ میں پہنچی خدا نے اُن سے اپنے اس قول میں وعدہ فرمایا تھا اذن للذ ین یقا تلون

    آخر آیت تک

    اور علٰی نصرھم کے قول سے اشارہ کیا کہ مومنوں کے ہاتھ سے

    کفار پر عذاب اترے گا۔ پس خداتعالیٰ کا یہ وعدہ

    بدر کے دن ظاہر ہوا اور کافر مسلمانوں کی آبدار تلوار سے

    قتل کیے گئے۔ پھر دوسری ذلت سے خبر دی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 278

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 278

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/278/mode/1up


    بقولہ’’3 (یعنی

    یکون لہم الغلبۃ والفتح لا یدانِ بہم لأحد)

    3 ‘‘ ...3

    33 *‘‘والمراد

    من ’’کُلِّ حَدَبٍ‘‘ ظفرُہم وفوزہم بکل مراد

    بقول 3 (یعنی

    او شاں را آں چناں غلبہ و فتح دست بدہد کہ ہیچکس باایشاں تاب مقابلہ نیا ورد)

    و بقول وھم من کل حدب ینسلون۔۔۔وترکنا بعضھم یومئذ

    یموج فی بعض و مراد از شتافتن

    از بالائے ہر بلندی آنست کہ در ہر مراد و مقصود کامیابی و شادکامی

    اپنے اس قول سے 3 (یعنی

    ان کو ایسا غلبہ اور فتح ملے گی کہ کوئی اُن کے ساتھ مقابلہ نہ کر سکے گا)

    اور اس قول سے وھم من کل حدب ینسلون۔۔۔وترکنا بعضھم یومئذ

    یموج فی بعض اور

    ہر ایک بلندی سے دوڑنے سے یہ مطلب ہے کہ ہر ایک مراد اور مقصود میں کامیابی

    قد اشاراللّہ فی اٰیات بعدھٰذہ الاٰیۃمن غیرفصلٍ الٰی انّ یاجوج وماجوج ھم النصاریٰ۔الا ترٰی قولہ افحسب الذین کفرواان یتخذواعبادی من دونی اولیاء۔۴؂ وکذالک قولہ قل ھل ننبّئکم بالاخسرین اعمالا۔الذین ضلّ سعیھم فی الحیٰوۃ الدنیا وھم یحسبون انّھم یحسنون صُنعا۵؂۔وکذالک قولہ قل لوکان البحرمدادًا لکلمات ربّی۔ولاشکّ ان النصاریٰ قوم اتخذواالمسیح معبودًا من دون اللّہ وتمایلواعلی الدنیا وسبقوا غیرھم فی ایجاد صنایعھا و قالو ان المسیح ھو کلمۃ اللّٰہ والمخلوق کلہ من ھذہ الکلمۃ فھذہ الاٰیات ردّ علیھم۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 279

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 279

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/279/mode/1up


    وعروجُہم إلی کل مقام وکونُہم فوق کل ریاسۃ قاہرین. والمراد من قولہ’’3333۱؂ ‘‘ أن نار الخصومات تستوقد فی ذالک

    الزمان فی کل فرقۃ من فرق أہل الأدیان،

    و ینفقون الذہب والفضّۃ کالجبال لتکذیب

    الإسلام والإبطال وارتداد المسلمین، ویُؤلّفون

    کتبًا مملوء ۃ من التوہین۔وقد أشار اللّہ فی

    او شاں را میسر آید و ہر مملکت و ریاست در حوزہ تصرف ایشاں

    در آید و مراد از یموج بعضھم فی بعض آنکہ

    دراں زمان در جملہ فرقہا

    آتش پیکار و جنگ بیفزود

    و کوہ کوہ زر و سیم برائے نابود کردن

    اسلام و باز گردانیدن مسلماناں از دائرہ اسلام خرچ بکنند۔ وکتابہا

    پُر از توہین اسلام تالیف بنمایند۔ و در بسیار از مقامات خداتعالیٰ

    اور شادکامی ان کو میسر آئے گی اور ہر ایک سلطنت اور ریاست ان کے تصرف

    میں آجائے گی اور یموج بعضھم فی بعض سے یہ مراد ہے

    کہ اس زمانہ میں تمام فرقوں میں

    جنگ کی آگ بھڑک اُٹھے گی

    اور پہاڑوں برابر سونا چاندی اسلام کے نابود کرنے کے لئے

    اور مسلمانوں کو اسلام کے دائرہ سے نکالنے کے لئے خرچ کریں گے اور اسلام کی توہین سے

    بھری ہوئی کتابیں تالیف کی جائیں گی اور بہت سے مقاموں میں خدا تعالیٰ نے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 280

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 280

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/280/mode/1up


    کثیر من المقام أن تلک الأیّام أیّام الغُربۃِ

    للإسلام، وہناک یکون المسلمون کالمحصورین، وتہبّ علیہم عواصفُ التفرقۃ فیکونون

    کعِضِین۔فأمّا قولہ’’3

    33۱؂ ‘‘ فیرید منہ أن فِرقۃ تأکل فِرقۃ

    أخرٰی، وتعلُو یأجوج ومأجوج وتسمعون

    أخبار خروجہم فی الأرضین. وفی تلک الأیام

    اشارہ فرمودہ کہ آں روزہائے غربت اسلام باشد

    و مسلماناں در آں زمان مانند محصوراں زندگانی بسر برند

    و بادہائے تفرقہ و پراگندگی بر سر ایشاں بوزد پس او شاں

    از ہم بپاشند و پراگندہ گردند و مراد از یموج بعضھم فی بعض آنکہ

    یک فرقہ دیگر را فرو خورد

    و یاجوج و ماجوج سربلندی یابند و در ہمہ

    روئے زمین خبرہائے خروج اوشاں گوش زد بشوند و دراں ایّام

    اشارہ فرمایا ہے کہ وہ دن اسلام کی غربت کے دن ہوں گے

    اور مسلمان اس زمانہ میں قیدیوں کی طرح زندگی بسر کریں گے

    اور تفرقہ اور پراگندگی کی ہوائیں اُن کے سر پر چلیں گی۔ پس وہ

    بکھر جائیں گے اور پراگندہ ہو جائیں گے اور یموج بعضھم فی بعض سے مراد یہ ہے

    کہ ایک فرقہ دوسرے فرقہ کو کھا جائے گا

    اور یاجوج و ماجوج سربلندی پائیں گے اور تمام

    سطح زمین پر اُن کے نکلنے کی خبریں سننے میں آئیں گی اور اُن دنوں میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 281

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 281

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/281/mode/1up


    لا یکون الإسلام إلا کعَجوزۃٍ، ولا یبقی لہ من قوۃ

    و لا من عزّۃ، و تصیبہ ذلّۃ علی ذلّۃ،

    وکاد أن یُقبَر من غیر التجہیز والتکفین،

    وتُصَبّ علیہ مصائب ما سمعتْ أذنٌ

    مثلہا من قبل، ویخرج من الدین أفواج

    من الجاہلین، لاعنین ومحقِّرین ومکذِّبین،

    وتُقلَب الأمور کلہا، وتنزل المصائب علی

    اسلام مانند پیرہ زنے باشد و در وے ہیچ گونہ

    قوت و عزت نماند و ذلت بعد ذلت او را برسد

    و نزدیک باشد کہ بغیر تجہیز و تکفین در زیر خاک سپردہ شود

    و آنچناں مصیبتہا برآں فرود آیند کہ ہیچ گوشے در زمان پیشیں مثل آں

    نشنیدہ باشد و فوج فوج جاہلاں از دائرہ دین بیرون روند

    و از دین فوج فوج جاہلاں *** کناں و تحقیر و تکذیب کناں بیروں روند

    و ہمہ امور زیر و زبر کردہ شود و بر شریعت و اہل وے

    اسلام بوڑھی عورت کی طرح ہوگا اور اُس میں کسی طرح کی

    قوت و عزت نہیں رہے گی اور ذلت پر ذلت اُس کو پہنچے گی

    اور قریب ہوگا کہ بغیر تجہیز و تکفین کے زمین میں گاڑ دیا جائے گا۔

    اور ایسی مصیبتیں اس کے سر پر پڑیں گی کہ پہلے زمانہ میں کسی کان نے

    اس جیسا نہ سنا ہوگا اور جاہلوں کے گروہ در گروہ دین کے دائرہ سے باہر

    نکل جائیں گے اور دین میں سے گروہ در گروہ جاہل لوگ *** کرتے ہوئے اور تکذیب کرتے ہوئے

    نکل جائیں گے اور تمام امور زیر و زبر کیے جائیں گے اور شریعت اور شریعت والوں پر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 282

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 282

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/282/mode/1up


    الشریعۃ وأہلہا، ویُرَدّ قمرہا کعُرجونٍ قدیم

    فی أعین الناظرین، وہذہ ذلّۃ ما أصابت الملّۃ

    من قبل ولن تصیب إلی یوم الدین. فعند

    ذالک تنزل النصرۃُ من السماء ومعالِمُ العزّۃ

    من حضرۃ الکبریاء ، مِن غیر سیف وسنان ومحاربین*۔

    رنجہا نازل شوند و ماہتاب وے در چشم بینندگاں مانند شاخ کہنہ

    بنظر آید۔ و ایں ذلتے است کہ پیش ازیں ملت را

    نرسیدہ و تا بروز جزا نخواہد رسید۔ چوں کار

    بہ اینجا رسد در آں وقت از آسمان نصرت و از جانب حق تعالیٰ

    بغیر تیغ و سنان و پیکار ورزاں نشانہائے عزت نازل شوند

    رنج اور مصیبتیں اُتریں گی اور اُس کا چاند دیکھنے والوں کی نظر میں پرانی ٹہنی کی

    طرح نظر آئے گا اور یہ ذلت ہے کہ اس سے پہلے ملت کو

    نہیں پہنچی اور قیامت تک نہیں پہنچے گی۔جب اس حد تک

    معاملہ پہنچ جاوے گا تب آسمان سے نصرت اور خداتعالیٰ کی طرف سے

    بغیر تلوار اور بغیر نیزے اور لڑنے والوں کے عزت نشان اُتریں گے۔

    انّ عیسٰی بن مریم ماقاتل وماامربالقتال۔فکذالک المسیح الموعودفانّّہ علٰی نموذجہ من اللّہ ذی الجلال۔والسرّفیہ ان اللّہ اراداَنْ یُّرْسِلَ خاتم خلفاءِ بنی اسرائیل وخاتم خلفاء الاسلام۔من غیرالسنان والحسام۔لیُزِیْلَ شبھات نَشَأَتْ من قبلُ فی طبائع العوام۔ولیعلم الناسُ انّ اشاعۃالدین بامرٍمن اللّہ لابضرب الاعناق وقَتْلِ الاقوام۔ثم لما کان الیھود فی وقت عیسٰی والمسلمون فی وقت المسیح الموعود۔قدخرج اکثرھم من التقویٰ وعصوااَحکام الربّ الودودِ۔فکان بعیدًا من الحکمۃ الالٰھیّۃ۔ان یقتل الکافرین لھذہ الفاسقین۔ فتدبّرحق التدبّر ولا تکن من الغافلین۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 283

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 283

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/283/mode/1up


    وإلیہ إشارۃ فی قولہ تعالٰی’’33 3‘‘۱؂، وہو مراد من بعث المسیح

    الموعودیامعشرالعاقلین*۔و فی لفظ النزول

    وبہمیں اشارت است در قول وے تعالیٰ و نفخ فی الصور الآیۃ

    اے گروہ عاقلاں ایں مراد از بعثت مسیح موعود

    است۔ و در لفظ نزول کہ

    اور اِسی کی طرف خداتعالیٰ کیاس قول میں اشارہ ہے و نفخ فی الصور آخر آیت تک

    اے عقلمندوں کے گروہ یہ مسیح موعود کی بعثت سے

    مراد ہے اور نزول کے لفظ میں جو

    وکذالک اشیرالی المسیح الموعود فی الکتاب الکریم۔اعنی فی سورۃالتحریم۔وھو

    و ہمچنیں در کتاب کریم در سورہ تحریم اشارت بمسیح موعود است آنجا کہ فرمود و مریم بنت عمران آں کہ فرج

    قولہ تعالٰی، 333

    خود راازہمہ ناپاکی ہا محفوظ داشت پس در وے از رُوح خود رسیدیم۔ و شک نیست کہ مراد از رُوح اینجا

    3۲؂۔ولاشک ان المرادمن الروح ھٰھناعیسٰی ابن مریم۔فحاصلالاٰیۃ

    عیسیٰ ابن مریم است۔پس حاصل آیت اینکہ عادتِ خداوندی چناں است کہ آنکس را کہ ازیں

    ان اللّہ وعدانّہ یجعل اخشی الناس من ھٰذہ الامۃ مسیح ابن مریم و ینفخ فیہ روحہبطریق البروز

    امت بیشتر خشیت و خوف خدا در دل دارد مسیح ابن مریم مے گرداندوبروزروح وے رادر وے می دمد۔پس

    فھذہ وعد من اللّہ فی صورۃ المثل لاتقی الناس من المسلمین فانظرکیف سمّی اللّہ بعض

    ایں وعدہ است از خدادرصورت مثلیت برائے متقی و پرہیزگارپس نگاہ بکن کہ چہ طورحق تعالیٰ بعض افراد ایں

    افرادھٰذہ الامۃ عیسی بن مریم ولا تکن من الجاہلین۔منہ

    امت را بنام عیسیٰ ابن مریم یاد می کند۔واز جاہلاں مباش۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 284

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 284

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/284/mode/1up


    الذی جاء فی الأحادیث إیماءٌ إلی أن الأمر

    و النصر ینزل کلہ من السماء فی أیام المسیح

    من غیر توسُّل أیدی الإنسان ومِن غیر جہاد المجاہدین، وینزل الأمر من الفوق مِن غیر

    تدبیر المدبّرین. کأن المسیح ینزل کالمطر

    من السماء واضعا یدیہ علی أجنحۃ الملا ئکۃ لَا علٰی أجنحۃ حِیَلِ الدنیا والتدابیر الإنسانیۃ،

    در احادیث آمدہ اشارہ بآں است کہ امر

    و نصرت در ایام مسیح

    بغیر وسیلہ دست انسان و بغیر جہاد مجاہداں

    از آسمان نازل شود۔ و بغیر تدبیر مدبّراں ہمہ چیز از بالا بزیر آید

    گویا مسیح مانند باراں

    دست بر بازوئے فرشتگان گذاشتہ

    نہ بربازوئے حیلہ ہائے دنیا و تدابیر انسانی نہادہ از آسمان نازل شود

    حدیثوں میں آیا ہے یہ اشارہ ہے کہ

    مسیح موعود کے زمانہ میں امر اور نصرت

    انسان کے ہاتھ کے وسیلہ کے بغیر اور مجاہدین کے جہاد کے بغیر

    آسمان نے نازل ہوگی اور مدبروں کی تدبیر کے بغیر تمام چیزیں اوپر سے

    نیچے آئیں گی۔ گویا مسیح بارش کی طرح

    فرشتوں کے بازوؤں پر ہاتھ رکھ کر آسمان سے اُترے گا

    انسانی تدبیروں اور دنیاوی حیلوں کے بازوؤں پر اس کا ہاتھ نہ ہوگا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 285

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 285

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/285/mode/1up


    وتَبْلُغُ دعوتُہ وحجّتہ إلی أقطار الأرض

    بأسرع أوقاتٍ کبرق یبدو من جہۃ فإذا

    ہی مشرقۃ فی جہات. فکذالک یکون فی

    ہٰذا الزمان، فلیسمعْ من یکن لہ أُذُنان، و

    یُنفَخُ فی الصُّور لإشاعۃ النور وینادی الطبائعُ

    السلیمۃ للاہتداء ، فیجتمع فِرق الشرق

    والغرب والشمال والجنوب بأمرٍ من حضرۃ

    و دعوت و حجت وے باطراف زمین

    ہرچہ زود تر برسد مانند برق کہ از یک طرف نمایاں مے شود و ناگہاں

    در ہمہ اطراف درخشاں مے گردد ہمیں حال

    دریں زمان واقع شود پس بشنود آنکہ وے را دو گوش دادہ اند

    و برائے اشاعت نور در صور دمیدہ شود و طبیعتہائے

    سلیمہ برائے ہدایت یافتن ندا زنند در آں وقت فرقہائے شرق

    و غرب و شمال و جنوب بامر ایزدی جمع شود

    اور اس کی دعوت اور حجت زمین میں چاروں طرف

    بہت جلد پھیل جائے گی اس بجلی کی طرح جو ایک سمت میں ظاہر ہو کر ایک دم میں

    سب طرف چمک جاتی ہے۔ یہی حال

    اس زمانہ میں واقع ہوگا۔پس سن لے جس کو دو کان دیے گئے ہیں۔

    اور نور کی اشاعت کے لئے صور پھونکا جائے گا اور سلیم طبیعتیں

    ہدایت پانے کے لئے پکاریں گی۔اس وقت مشرق اور

    مغرب اور شمال اور جنوب کے فرقے خدا کے حکم سے جمع ہو جائیں گے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 286

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 286

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/286/mode/1up


    الکبریاء ، فہناک تستیقظ القلوب وتنبت

    الحبوب بہذاالماء،لا بنارالحرب وسفک الدماء،ویُجذَب الناس بجذبۃ سماویۃ مطہّرۃ من شوائب الأرض

    لما ہو نموذج لیوم القضاء من مالک یوم الدین۔

    وقد وعد اللّہ عند الفتنۃ العظمی فی آخر الزمان، والبلیّۃ الکبری قبل یوم الدیّان، أنہ ینصردینہ

    من عندہ فی تلک الأیام، وہناک یکون

    پس در آں وقت دلہا بیدار شوند و دانہ ہا بایں آب

    برویند نہ بآتش جنگ و ریختن خونہا

    و مردم با کشش آسمانی کہ از آمیزش زمین پاک باشد کشیدہ شوند

    کہ آں از مالک یوم الدین نمونہ روز قضا باشد۔

    و خدا وعدہ فرمودہ کہ وقتیکہ در آخر فتنۂ بزرگ و بلائے سترگ

    ہویدا شود پیش از روز جزا درایں ایام

    از طرف خود دین خود را نصرت و تائید خواہد بخشید و دراں زمان

    پس اُس وقت دل جاگ جائیں گے اور دانے اس پانی سے

    اُگیں گے نہ کہ جنگ کی آگ اور خونوں کے بہنے سے اور

    لوگ آسمانی کشش سے جو زمین کی آمیزش سے پاک ہوگی کھینچے جائیں گے

    یہ خداتعالیٰ کی طرف سے قضا کے دن کا نمونہ ہوگا۔

    اور خدا نے وعدہ فرمایا ہے کہ جب کہ آخر زمانہ میں بڑا بھاری فتنہ اور

    بلا قیامت سے پہلے ظاہر ہوگی۔اُن دنوں میں

    اپنی طرف سے دین کی مدد اور تائید فرمائے گا اور اُس زمانہ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 287

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 287

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/287/mode/1up


    الإسلام کالبدر التام، وإلیہ أشار اللّہ سبحانہ

    فی قولہ’’33 ۱؂ ‘‘۔و

    قد أخبر فی آیۃ ہی قبل ہذہ الآیۃ من تفرقۃ

    عظیمۃ بقولہ’’ 3ِ

    3‘‘۲؂، ثم بشَّر بقولہ’’وَنُفِخَ فیِ الصُّورِ‘‘ بجمع

    بعد التفرقۃ، فلا یکون ہذا الجمع إلّا فی ماءۃ

    البدر لیدلّ الصورۃُ علی معناہا کما کانت

    اسلام مانند بدر کامل خواہد گردید و بہمیں اشارت است

    در قول و نفخ فی الصور فجمعناھم جمعًا

    و قبل ازیں آیت از تفرقہ بزرگے

    خبر دادہ آنجا کہ فرمودہ وترکنا بعضھم الخ

    باز بشارت دادہ بقول و نفخ فی الصور الخ

    کہ بعد ازاں پراگندگی جمعیت دست خواہد داد۔ پس جمعیت حاصل نشود مگر در صدر

    بدر یعنی چہاردہم تا صورت بر معنی خود دلالت کند ہمچناں کہ

    اسلام بدرِ کامل کی طرح ہو جائے گا اور اِسی کی طرف اشارہ ہے

    اس قول میں و نفخ فی الصور فجمعناھم جمعًا

    اور اس آیت سے ایک بڑے تفرقہ کی خبر دی

    جہاں کہ فرمایا ہے وترکنا بعضھم الخ

    پھر و نفخ فی الصور الخ کے قول سے بشارت دی۔

    کہ اس پراگندگی کے بعد جمعیت حاصل ہوگی۔پس یہ جمعیت حاصل نہ ہوگی مگر بدرکی صدی

    میں تا کہ صورت اپنے معنے پر دلالت کرے جیسا کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 288

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 288

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/288/mode/1up


    النصرۃ الأولی ببدر۔فہاتان بشارتان للمؤمنین،

    و تبرُقان کدُرّۃٍ فی الکتاب المبین۔ و قد

    مضی وقتُ فتح مبین فی زمن نبیّنا المصطفٰی،

    وبقی فتحٌ آخر وہو أعظم وأکبر وأظہر

    من غلبۃ أولٰی، وقُدّر أن وقتہ وقت المسیح

    الموعود من اللّہ الرء وف الودود وأرحم الراحمین، وإلیہ أشار فی قولہ تعالٰی’’33

    نصرت اول در بدر بوقوع آمد۔ پس ایں دو مژدہ ہا برائے مومناں ہستند

    و مثل دُرّ در کتاب روشن مے درخشند و ظاہر است

    کہ وقت فتح مبین در زمانہ نبی کریم ما بگذشت

    و فتح دیگر باقی ماند کہ از غلبۂ اول بزرگ تر و ظاہر تر

    است و مقدر بود کہ وقت وے وقت مسیح موعود

    باشد

    و بہ ہمیں اشارہ است در قول خداوندی سبحان الذی اسریٰ الخ

    پہلی بدر میں وقوع میں آئی۔پس یہ دو خوشخبریاں مومنوں کے لئے ہیں۔

    اور موتی کی طرح کتابِ مبین میں چمکتی ہیں اور ظاہر ہے

    کہ فتح مبین کا وقت ہمارے نبی کریم کے زمانہ میں گزر گیا

    اور دوسری فتح باقی رہی کہ پہلے غلبہ سے بہت بڑی اور زیادہ ظاہر ہے

    اور مقدر تھا کہ اس کا وقت مسیح موعود کا

    وقت ہو۔

    اور اسی کی طرف خداتعالیٰ کیا س قول میں اشارہ ہے سبحان الذی اسریٰ الخ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 289

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 289

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/289/mode/1up


    333 ۱؂ ‘‘، ففَکِّرْ فی ہذہ الآیۃ ولا

    تمرّ کالغافلین۔وإن فی لفظ ’’الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ‘‘

    ولفظ ’’الْمَسْجِدِ الأَقْصَی‘‘ الذی جُعِل من وصفہ جملۃ ’’بَارَکْنَا حَوْلَہُ‘‘ إشارۃ لطیفۃ للمتفکّرین،

    وہو أن لفظ ’’الْحَرامِ‘‘ یدل علی أن الکافرین

    قد حُرّم علیہم فی زمن النبی علیہ السلام

    پس دریں آیت فکر بکن و مانند غافلاں

    از پیش وے مگذر و در لفظ مسجد حرام

    و مسجد اقصیٰ کہ بارکنا حولہ در وصف وے

    مذکور شدہ اشارت لطیف است برائے آنکہ فکر مے کنند

    و آں اینکہ لفظ حرام وا مے نماید کہ بر کافراں

    حرام کردہ شدہ بود کہ در زمانہ نبی کریم علیہ الصلوٰۃ و السلام

    پس اس آیت میں فکر کر اور غافلوں کی طرح

    اس کے آگے سے مت گزر اور مسجد حرام کے لفظ میں

    اور مسجد اقصیٰ کے لفظ میں جس کے وصف میں

    بارکنا حولہ مذکور ہوا ہے۔لطیف اشارہ ہے ان کے لئے جو فکر کرتے ہیں۔

    اور وہ یہ ہے کہ لفظ حرام ظاہر کرتا ہے کہ کافروں پر یہ بات

    حرام کی گئی تھی کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 290

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 290

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/290/mode/1up


    أن یضرّوا الدین بالمکائد أو یأتوہ کالصائد،

    وعصَم اللّہ نبیّہ ودینہ وبیتہ من صوْل

    الصائلین وجور الجائرین. وما استأصل اللّہ

    فی ذالک الزمن أعداء الدین حق الاستیصال،

    ولکن حفِظ الدین من صَولہم وحَرّم علیہم

    أن یغلبوا عند القتال. فبُدِءَ أمرُ تأیید الدین

    من المسجد الحرام أعنی مِن ذَبِّ اللئام، ثم

    دین را با فریب و حیلتہا ضررے برسانند یا مانند صیاداں بر سر وے

    بریزند و خدا نبی ء خود را و دین و خانہ را از حملۂ حملہ آوراں

    و بداد بیدادگراں نگاہ بداشت و دراں زماں

    دشمنانِ دین را چنانکہ باید و شاید از بیخ و بُن بر نکندید

    و لیکن دین را از حملۂ ایشاں محفوظ داشت و بر ایشاں

    غلبہ در جنگ حرام گردانید پس امر تائید دین

    از مسجد حرام یعنی از دفع و طرد لئام آغاز گردید باز

    دین کو فریب اور حیلوں سے ضرر پہنچائیں یا شکاریوں کی طرح اس پر

    برس پڑیں اور خدا نے اپنے نبی کو اور اپنے دین اور اپنے گھر کو حملہ آوروں کے حملہ سے

    اور بے دادگروں کے بیداد سے بچائے رکھا اور اس زمانہ میں

    دین کے دشمنوں کو جیسا کہ چاہیے تھا جڑ سے نہیں اکھاڑا

    لیکن دین کو ان کے حملہ سے محفوظ رکھا اور حرام کر دیا کہ وہ

    لڑائی میں غالب رہیں۔پس دین کی تائید کا امر

    مسجد حرام سے یعنی لئیموں کے دفع کرنے سے شروع ہوا پھر



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 291

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 291

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/291/mode/1up


    یتمّ ہذا الأمر علی المسجد الأقصی الذی

    یبلغ فیہ نور الدین إلی أقصی المقام کالبدر التام، ویلزَمہ کلُّ برکۃ یُتوقَّع ویُتصوَّر عند کمالٍ

    لیس فوقہ کمال، وہذا وعدٌ من اللّہ العلّام.

    فکان المسجد الحرام یُبشّر بدفع الشر

    والحفظ من المکروہات، وأما المسجد الأقصی

    فیشیر مفہومہ إلی تحصیل الخیرات وأنواع

    ایں امر بر مسجد اقصیٰ باتمام رسد آں مسجدے کہ

    در وے نوردین تا بمقام اقصےٰ مانند ماہ چہار دہم برسد

    و برکتے کہ در وقت کمال کہ بالائے آں کمالے نباشد متوقع

    و متصور مے گردد وے را لازم باشد و ایں وعدہ است از خدائے علیم

    پس مسجد حرام مژدۂ دفع شر

    و محفوظ ماندن از مکروہات مے دہد ولے مسجد اقصےٰ

    پس مفہوم وے اشارہ مے کند بایں کہ برکات گوناگوں و خیرات بوقلموں

    یہ امر مسجد اقصیٰ پر تمام ہوگا یہ وہ مسجد ہے

    جس میں دین کا نور اقصیٰ کے مقام تک پورے چاند کی طرح پہنچے گا۔

    اور ہر ایک برکت جو ایسے کمال کے وقت میں جس کے اوپر کوئی کمال نہ ہو تصور میں

    آوے اس کے لازم حال ہوتی ہے اور یہ خدائے علیم کا وعدہ ہے۔

    پس مسجد حرام شر کے دور ہونے

    اور مکروہات سے محفوظ رہنے کا مژدہ دیتی ہے لیکن مسجد اقصیٰ کا

    مفہوم اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ رنگ برنگ کے برکات اور خیرات



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 292

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 292

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/292/mode/1up


    البرکات والوصول إلی أعلی الترقّیات، فبُدِءَ أمرُ

    دیننا مِن دفع الضیر، ویتم علی استکمال الخیر،

    وإنّ فیہ آیات للمتدبّرین.ثم إن آیۃ الإسراء

    تدلّ علی نُکتۃ وجَب ذکرُہا للأصدقاء لیزدادوا

    عِلمًا ویقینًا، وإن خیر الأموال العلم والیقین،

    وہو أن الإسراء من حیث الزمان کان واجبًا

    کوجوب الإسراء من حیث المکان، لیتمّ سیرُ

    و ترقیات عالیہ حاصل بشوند۔ پس امر دین ما

    از دفع ضرر آغاز شد و بر کمال خیر تمام شود

    و دریں بیان برائے غور کنندگان نشانہا ہستند۔باز آیت اسرٰی

    یک نکتۂ عجیبے دارد کہ ذکر آں برائے دوستاں ضروری است تا علم

    و یقین شاں زیادت پذیرد و پرظاہر است کہ بہترین مال اور دولت علم و یقین است

    و آں اینکہ اسراء از حیثیت زمان و مکان

    ہردو طور یکساں واجب و لازم بود بجہت اینکہ

    اور ترقیات عالیہ حاصل ہوں پس ہمارے دین کا امر

    دفع ضرر سے شروع ہوا اور خیر کی تکمیل پر تمام ہوگا

    اور اس بیان میں غور کرنے والوں کے لئے نشان ہیں۔پھر اسریٰ کی آیت

    ایک عجیب نکتہ رکھتی ہے کہ اس کا ذکر دوستوں کے لئے ضروری ہے تا علم

    اور یقین زیادہ ہو اور خوب ظاہر ہے کہ سب سے بہتر مال و دولت علم اور یقین ہے

    اور وہ یہ کہ اسراء زمان اور مکان کی حیثیت سے

    دونوں طرح واجب اور لازم تھا۔ اس جہت سے کہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 293

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 293

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/293/mode/1up


    نبیِّنا زمانا ومکانا، ولیکمُلَ أمرُ معراج

    خاتم النبیین. ولا شکّ أن أقصی الزمان

    للمعراج الزمانی ہو زمان المسیح الموعود،

    وہو زمان کمال البرکات ویقبلہ کل مؤمن

    من غیر الجحود، ولا شک أن مسجد المسیح الموعود ہو أقصی المساجد من حیث الزمان

    من المسجد الحرام، وقد مُلِأَ مِن کلّ جنب

    سیر نبی ء ما از روئے زمان و مکان تمام شود و امر معراج

    کامل گردد۔ و شک نیست کہ برائے معراج

    زمانِ نبی کریم زمانہ انتہائی ہماں زمان مسیح موعود است

    و آں زمان کمال برکات است و ایں را ہر مومن

    بغیر انکار قبول مے تواند کرد و شک نیست کہ مسجد مسیح موعود

    نسبت بمسجد حرام بحیثیت زمان اقصیٰ مساجد

    مے باشد و بالیقین ہر پہلوئے ایں مسجد

    ہمارے نبی کا سیر زمان اور مکان کے رو سے تمام ہو اور معراج کاامر

    کامل ہو اور اس میں شک نہیں کہ نبی ء کریم کے

    زمانی معراج کے لئے انتہائی زمانہ مسیح موعود کا زمانہ ہے۔

    اور وہ برکات کے کمال کا زمانہ ہے اور اس کوہر ایک مومن

    بغیر انکار کے قبول کر سکتا ہے اور اس میں شک نہیں کہ مسیح موعود کی مسجد

    مسجد حرام کی نسبت سے زمانہ کی حیثت سے اقصیٰ مساجد ہے

    اور یقیناًاس مسجد کا ہر ایک پہلو



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 294

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 294

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/294/mode/1up


    برکۃً ونورًا کالبدر التام، لیکمُل بہ دائرۃ

    الدین، فإن الإسلام بُدِءَ کالہلال من

    المسجد الحرام، ثم صار قمرًا تامًّا عند بلوغہ

    إلی المسجد الأقصٰی، ولذالک ظہر المسیح

    فی عِدّۃ البدر إشارۃً إلی ہذا المقام۔ثم ہنا

    دلیل آخر علی وجوب الإسراء الزمانی من

    الأمر الربّانی وہو أن اللّہ تعالی قد أشار

    از برکت و نور مانند ماہ چہاردہم پُر شدہ است تا بوسیلہ آں دائرہ

    دین کامل گردد چہ کہ اسلام مانند ہلال

    از مسجد حرام نمایاں شد باز چوں تا بمسجد اقصیٰ رسید بدر کامل

    گردید ازینجاست کہ مسیح موعود

    در شمار بدر ظاہر شد۔ باز

    دلیل دیگر بروجوب اسراء زمانی آنست کہ

    حق تعالیٰ در قول

    برکت اور نور کی پورے چاند کی طرح بھر گیا ہے۔ تا کہ اس کے وسیلہ سے دین کا دائرہ

    کامل ہو جائے کیونکہ اسلام ہلال کی مانند

    مسجد حرام سے ظاہر ہوا پھر جب مسجد اقصیٰ تک پہنچا بدر کامل

    ہوگیا اسی لئے مسیح موعود

    بدر کے شمار میں ظاہر ہوا پھر

    دوسری دلیل اسراء زمانی کے وجوب پر یہ ہے کہ

    حق تعالیٰ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 295

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 295

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/295/mode/1up


    فی قولہ’’3 ۱؂ ‘‘ إلی أنَّ جماعۃ المسیح الموعود عند اللّہ من الصحابۃ

    مِن غیر فرق فی التسمیۃ، ولا یتحقّق ہٰذہ

    المرتبۃ لہم من غیر أن یکون النبی صلی اللّہ

    علیہ وسلم بینہم بقوتہ القدسیۃ والإفاضۃ

    الروحانیۃ کما کان فی الصحابۃ، أعنی بواسطۃ المسیح الموعود الذی ہو مظہرٌ لہ أو کالحُلّۃ۔

    وآخرین منھم الخ اشارہ مے فرماید کہ

    جماعتِ مسیح موعود نزد خدا از جملہ صحابہ است

    بے آنکہ ہیچ فرقے دریں نام گذاشتن باشد و ایں مرتبہ جماعت مسیح را

    ہرگز حاصل نمے شود تا وقتیکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم

    درمیان ایشاں با قوت قدسی و افاضہ

    روحانی خویش موجود نباشد۔ہمچناں کہ در صحابہ موجود بود یعنی بواسطہ

    مسیح موعود کہ او مظہر نبی کریم یا مانند حلّہ برائے آنجناب است

    وآخرین منھم کے قول میں اشارہ فرماتا ہے کہ

    مسیح موعود کی جماعت خدا کے نزدیک صحابہ میں کی ایک جماعت ہے۔

    اور اس نام رکھنے میں کچھ فرق نہیں اور یہ مرتبہ

    مسیح کی جماعت کو ہرگز حاصل نہیں ہوتا جب تک کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم

    ان کے درمیان قدسی قوت اور اپنے

    روحانی افاضہ کے ساتھ موجود نہ ہوں جیسا کہ صحابہ کے اندر موجود تھے یعنی

    مسیح موعود کے واسطہ سے کیونکہ وہ نبی کریم کا مظہر یا آنجناب کے لئے حلّہ کی مانند ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 296

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 296

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/296/mode/1up


    فقد ثبت من ہذا النصّ الصریح من الصحف

    المطہّرۃ أن معراج نبیّنا کما کان مکانیًّا

    کذالک کان زمانیًّا، ولا یُنکرہ إِلّا الّذی فقد

    بصرہ وصار من العمین. ولا شک ولا ریب

    أن المعراج الزمانی کان واجبًا تحقیقًا لمفہوم

    ہذہ الآیۃ، ولو لم یکن لبطل مفہومہا کما

    لا یخفی علی أہل الفکر والدّرایۃ، فثبت من

    پس ازیں نص صریح روشن شد

    کہ معراج نبی ما مکانی و زمانی ہر دو طور بود

    و بر ایں نکتہ جز کور چشمے

    کودن انکار نمے کند۔ و شک نیست

    کہ مفہوم ایں آیت واجباً معراج زمانی را مے خواست

    و اگر آں متحقق نشدے مفہوم ایں آیت باطل گردیدے

    چنانچہ ایں نکتہ را اہل فکر و غور مے فہمند پس ازینجا ثابت شد

    پس اس نص صریح سے ظاہر ہوا

    کہ ہمارے نبی کا معراج مکانی اور زمانی دونوں طرح سے تھا

    اور اس نکتہ کا سوائے اندھے کے

    اور کوئی انکار نہیں کرتا اور شک نہیں

    کہ اس آیت کا مفہوم واجباً معراج زمانی کو چاہتا تھا۔

    اور اگر وہ متحقق نہ ہوتا تو اس آیت کا مفہوم باطل ہو جاتا

    چنانچہ اس نکتہ کو اہل فکر اور غور سمجھتے ہیں۔ پس یہاں سے ثابت ہوا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 297

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 297

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/297/mode/1up


    ہذا أن المسیح الموعود مظہرٌ للحقیقۃ

    المحمّدیۃ، ونازل فی الحُلل الجلالیۃ، فلذالک

    عُدَّ ظہورہ عند اللّہ ظہورَ نبیّہ المصطفٰی،

    وعُدَّ زمانہ منتہی المعراج الزمانی للرسول

    المجتبٰی، ومنتہی تَجلِّی روحانیۃِ سیّدِنا

    خیرالوری، وکان ہذا وعدًا مؤکّدًا من

    رب العالمین. ولما کان المسیح الموعود لوجود

    کہ مسیح موعود مظہر حقیقت محمدی

    است و در حلہ ہائے جلالی نازل شدہ است

    ازینجااست کہ نزد خدا ظہور او ظہور نبی مصطفی محسوب شدہ است

    و زمان وے منتہائے معراج زمانی رسول کریم

    و پایان تجلّی روحانی خیرالوریٰ بشمار آمدہ است

    وایں وعدہ پختہ از پروردگار جہان بود

    و چوں مسیح موعود

    کہ مسیح موعود محمدی حقیقت کا مظہر

    ہے اور جلالی حلّوں میں نازل ہوا ہے۔

    اسی لئے خدا کے نزدیک اس کا ظہور نبی ء مصطفی کا ظہور مانا گیا ہے

    اور اس کا زمانہ رسول کریم کے زمانی معراج کا منتہا

    اور خیرالوریٰ کی روحانی تجلّی کا آخری سرا شمار کیا گیا ہے

    اور جہان کے پروردگار کا یہ پختہ وعدہ تھا

    اور چونکہ مسیح موعود



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 298

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 298

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/298/mode/1up


    نبیّنا کالمرآۃ ومُتمِّمَ أمرہ بإشاعۃ البرکات

    وإظہار الإسلام علی الأدیان کلہا بالآیات، شکَر

    النبیُّ صلی اللّہ علیہ وسلم سعیہ کشکر

    الآباء للأبناء ، وأوصی لیُقرَأَ سلامُہ علیہ

    إشارۃً إلی السلامۃ والعلاء . ولو کان المراد

    من المسیح عیسی ابنَ مریم الذی أُنزلَ

    علیہ الإنجیل لفسُد وصیّۃُ تبلیغ السلام

    آئینہ وجود نبی کریم و از اشاعت برکات

    و اظہار اسلام برہمہ دین ہا تمام کنندہ امر آنجناب بود

    لہٰذا نبی کریم سعی وے را پسند فرمود چنانکہ

    پدران سعی پسران را شکر می کنند و وصیت فرمود کہ سلام آنجناب بروے خواندہ شود

    و ایں سلام اشارت است باینکہ سلامت و بلندی شامل حال مسیح خواہد بود و اگر

    از مسیح موعود عیسیٰ ابن مریم صاحب انجیل

    مراد باشد وصیت رسانیدن سلام فاسد گردد

    نبی کریم کے وجود کا آئینہ اور برکات کی اشاعت

    اور تمام دینوں پر اسلام کے غلبہ سے آنجناب کے امر کا تمام کرنے والا تھا

    لہٰذا نبی کریم نے اس کی کوشش کو پسند کیا جیسا کہ

    باپ بیٹوں کی کوشش کا شکر ادا کرتے ہیں اور وصیت فرمائی کہ آنجناب کا سلام اس کو پہنچایا جائے

    اوراس سلام سے یہ اشارہ ہے کہ سلامتی اور بلندی مسیح کے شامل حال ہوگی۔ اور اگر

    مسیح موعود سے انجیل والا عیسیٰ ابن مریم



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 299

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 299

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/299/mode/1up


    مراد ہو تو سلام پہنچانے کی وصیت فاسد ہو جاتی ہے۔

    وما کان إلیہا السبیل، فإن عیسٰی علیہ السلام

    اذا نزل بقولکم من السّماء فلا شک أنہ

    کان یَعرفہ رسولنا کالأحبّاء ، بل کان یسلِّم

    بعضُہما علی البعض عند اللقاء ، فیکون

    عند ذالک إیداعُ أمانۃِ السلام لغوًا

    وعَبثًا کالاستہزاء لِما ہو وقَع فی السماء

    مرارا وکان معلومًا قبل الإعلام و الإدراء .

    و نیز ہیچ راہے بآں نبود چہ کہ ہرگاہ بموجب گفتہ شما

    عیسیٰ از آسمان فرود آمد شک نیست کہ

    رسول کریم و او بایکدگر مانند دوستان شناسا بودہ باشند و در وقت ملاقات

    بر یکدیگر سلام می خواندہ باشند۔ پس

    دریں صورت سلام را بطور امانت گذاشتن فعل ہرزہ

    و بیہودہ خواہد بود زیرا کہ سلام بارہا در آسمان واقع شدہ

    و پیش از خبردار نمودن و آگاہا نیدن معلوم بودہ

    اور اس تک کوئی راستہ نہیں رہتا۔ کیونکہ جب

    تمہارے کہنے کے بموجب عیسیٰ آسمان سے نازل ہوا تو اس میں شک نہیں کہ

    رسول کریم اور وہ دونوں آپس میں دوستوں کی طرح جان پہچان رکھتے ہوں گے اور ملاقات

    کے وقت ایک دوسرے کو سلام کرتے ہوں گے۔

    پس اس صورت میں سلام کو امانت کی طرح رکھنا ایک

    بیہودہ فعل ہوگا کیونکہ سلام بارہا آسمان میں واقع ہوا

    اور خبردار کرنے سے پہلے معلوم تھا۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 300

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 300

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/300/mode/1up


    ثم من المعلوم أنہ علیہ السلام قد لقیَ

    عیسٰی لیلۃَ المعراج وسلّم علیہ، فلا شک

    أنہ ما أوصٰی إلّا لرجل کان لم یَرَہ واشتاق

    إلیہ. وما معنی وصیّۃِ السَّلام لرجل رآہ

    رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ وسلم غیرَ مرّۃ

    قبل الوفاۃ و بعد الوفاۃ۔ وَ سَلَّمَ علیہ لیلۃ

    المعراج وما فارقَہ بعد الموت فی وقت

    علاوہ براں ظاہر است کہ رسول کریم علیہ الصلوٰۃ والسلام

    شب معراج حضرت عیسیٰ را دیدند و بر وے سلام گفتند۔ پس شکے نیست

    کہ آنجناب وصیت سلام برائے شخصے فرمودہ اند کہ وے را نہ دیدہ و مشتاق او

    بودہ اند۔ و چیست معنی وصیت سلام برائے شخصے کہ

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم او را بارہا

    پیش از وفات و بعد از وفات دیدند و در شب معراج

    بر وے سلام گفتند و بعد از مرگ در ہیچ وقتے ازو جدا نہ شدند

    اس کے علاوہ ظاہر ہے کہ رسول کریم علیہ الصلوٰۃ والسلام نے

    معراج کی رات حضرت عیسیٰ کو دیکھا۔ اور اس پر سلام کہا۔پس کوئی شک نہیں

    کہ آنجناب نے سلام کی وصیت کو ایسے شخص کے لئے فرمایا ہے کہ اس کو نہیں دیکھا ہے اور اس کے

    مشتاق رہے۔ اور اس شخص کے لئے سلام کی وصیت کے کیا معنی ہیں جس کو

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بارہا

    وفات سے پہلے اور وفات کے بعد دیکھا۔ اور معراج کی رات

    اس پر سلام کہا۔ اور مرنے کے بعد کسی وقت اس سے جدا نہ ہوئے



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 301

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 301

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/301/mode/1up


    من الأوقات۔ أکان ہذا الأمر غیرَ ممکن إلّا

    بواسطۃ بعض أفراد الأمّۃ ؟ ففکّرْ إن کنتَ

    ما مَسَّک طائفٌ من الجِنَّۃ. أما تری أن النبیّ

    صلی اللّہ علیہ وسلم لما مات تیسّرَ لہ

    لقاءُ عیسٰی فی کلّ حین من الأحیان،

    و قد رأی عیسٰی لیلۃ الإسراء ، فکانت أبواب

    السَّلام مفتوحۃً من غیر توسُّطِ أبناء

    آیا ایں امر بغیر واسطہ فردے

    از افراد امت ممکن نبود پس اندیشہ بکن

    اگر دیوانہ نیستی آیا غور نمی کنی کہ چوں

    نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ازیں جہان برفتند آنجناب را

    موقعہ ملاقات حضرت عیسیٰ در ہر وقت دست بداد

    و پیش ازیں در شب اسراء باہم تلاقی بہم رسیدہ بود و ازیں سبب

    در سلام بغیر واسطہ ابنائے ایں زمان مفتوح شدہ بود

    کیا یہ امر بغیر کسی

    امت کے آدمی کے واسطہ سے ممکن نہ تھا۔پس سوچ

    اگر دیوانہ نہیں کیا تو غور نہیں کرتا کہ جب

    نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اس جہاں سے چلے گئے تو آنجناب کو

    حضرت عیسیٰ کی ملاقات کا موقعہ ہر وقت ملتا تھا۔

    اس سے پہلے اسراء کی رات میں آپس میں ملاقات ہوئی تھی اور اس سبب سے

    سلام کا دروازہ بغیر اس زمانہ کے لوگوں کے واسطہ کے مفتوح ہو گیا تھا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 302

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 302

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/302/mode/1up


    ہذا الزمان، فلا تجعلْ سَلَامَ رسول اللّٰہ

    لغوًا، وأمعِنْ حقّ الإمعان. ربّ بَلّغْہ

    سلامًا مِّنَّا، وإنّ ہٰذا خاتمۃ البیان.

    پس سلام رسول اللہ را

    لغو و بیہودہ مشناس ودر معنے وے بامعان نظر اندیشہ بکن۔اے پروردگار من

    از ما بر وے سلام برساں۔

    پس رسول اللہ کے سلام کو

    بیہوہ اور لغو مت سمجھ اور اس کے معنوں میں پوری طرح غور سے سوچ۔ اے ہمارے پروردگار

    ہمارا سلام اس پر بھیج۔

    تمّت



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 303

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 303

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/303/mode/1up


    القَصیدہ لِکُلِّ قریحۃٍ سعیدۃ

    أری سیلَ آفاتٍ قضاہا المقدِّرُ

    وفی الخَلْق سَیّات تُذاع وتُنشَرُ

    وفی کلّ طرف نارُ شرٍّ تَأَجّجَتْ

    وفی کلّ قلب قد تَراءَ ی التحجُّرُ

    وقد زُلزلتْ مِن ہذہ الریح دَوحۃٌ

    تُظِلُّ بظلٍّ ذی شفاءٍ وتُثْمِرُ

    أری کلَّ محجوبٍ لدنیاہ باکِیًا

    فمَن ذا الذی یبکی لدینٍ یُحقَّرُ

    وللدین أطلالٌ أراہا کلاہِفٍ

    ودمعی بذکرِ قُصورہ یَتحَدَّرُ

    تراء تْ غوایاتٌ کریحٍ مُجیحۃٍ

    وأرخَی سدیلَ الغیِّ لیلٌ مُکدِّرُ

    أرٰی ظلماتٍ لیتنی مِتُّ قبلہا

    وذقتُ کؤُوْسَ الموت أو کنتُ أُنصَرُ

    تہبّ ریاحٌ عاصفات کأنّہا

    سِباعٌ بأرض الہند تعوی وتَزْأَرُ

    أری الفاسقین المفسدین وزُمْرَہم

    وقلَّ صلاحُ الناس والغیُّ یکثُرُ

    أری عینَ دین اللّٰہ منہم تکدَّرتْ

    بہا العِینُ والآرامُ تمشی وتَعبُرُ

    أری الدین کالمرضٰی علی الأرض راغمًا

    وکلّ جہولٍ فی الہوی یَتبَخْتَرُ

    وما ہَمُّہم إلّا لِحَظِّ نفوسہم

    وما جُہْدُہم إلّا لعیشٍ یُوفَّرُ

    نسُوا نَہْجَ دین اللّٰہ خُبْثًا وغَفْلَۃً

    وقد سَرَّہم بَغْیٌ وفسق ومَیسِرُ

    فَلَمَّا طَغَی الفسق المبیدُ بسیلہ

    تمنَّیتُ لو کان الوباء المتبِّرُ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 304

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 304

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/304/mode/1up


    فإنّ ہلاک الناس عند أولی النُّہٰی

    أحَبُّ و أَولٰی مِن ضلالٍ یُدمِّرُ

    صبرْنا علی ظلم الخلائق کلِّہم

    ولکنْ علی سیل الشقا لا نصبرُ

    وقد ذاب قلبی مِن مصائب دیننا

    وأعلَمُ ما لا تعلمون وأُبصِرُ

    وبَثِّی وحُزنی قد تجاوزَ حدَّہ

    ولولا مِن الرحمٰن فضلٌ أُتبَّرُ

    وعندی دموع قد طلعنَ المآقیا

    وعندی صُراخٌ لا یراہ المُکَفِّرُ

    ولی دعواتٌ یَصْعَدَنَّ إلٰی السَّما

    ولی کلماتٌ فی الصَّلایۃ تَقْعَرُ

    وأُعطیتُ تأثیرًا من اللّٰہ خَالقی

    فتأوی إلی قولی جَنانٌ مُطہَّر

    وإنّ جَنانی جاذبٌ بصفاۂِ

    وإن بیانی فی الصُّخور یُؤَثِّرُ

    حفَرتُ جبالَ النفس مِن قوّۃ العُلٰی

    فصار فؤادی مثلَ نہرٍ تُفَجَّرُ

    وأُعطیتُ رعبًا عند صَمْتی من السّما

    وقولی سِنان أو حُسام مُشہَّرُ

    فہذا ہو الأمر الذی سَرَّ مالکی

    وأرسلَنی صدقًا وحقًّا فأُنذِرُ

    إذا کذَّبَتْنِی زُمْرُ أعداءِ مِلّتی

    فقلتُ اخْسَأُوا إنّ الخفایا ستَظہَرُ

    فریقٌ من الأحرار لا یُنکِروننی

    وحزب من الأشرار آذَوا وأنکرُوا

    وقد زاحموا فی کلّ أمرٍ أردتُہ

    فأیَّدنی ربّی ففَرُّوا وأدبرُوا

    وکیف عصَوا واللّٰہِ لم یُدْرَ سِرُّہا

    وکان سنا صدقی من الشّمس أظہَرُ

    لزِمتُ اصطبارًا عند جَورِ لئامِہم

    وکان الأقارب کالعقارب تأبُرُ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 305

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 305

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/305/mode/1up


    وہذا علی الإسلام إحدی المصائبِ

    یُکذَّب مثلی بِالہوٰی ویُکفَّرُ

    فأقسمتُ باللّٰہ الذی جلَّ شأنُہُ

    عَلٰی أنہ یُخزِی العِدا وأُعزَّرُ

    ولِلْغَیِّ آثارٌ وللرشد مثلُہا

    فقُوموا لتفتیش العلامات وانظُروا

    تظنّون أنی قد تقوَّلتُ عامِدًا

    بمکرٍ وبعضُ الظنّ إثمٌ ومُنکَرُ

    وکیف وإنّ اللّٰہ أبدَی بَرَاءَ تِیْ

    وجاء بآیات تلُوح وتَظہَرُ

    ویأتیک وعدُ اللّٰہ مِن حیث لا ترٰی

    فتعرِفہ عینٌ تُحَدُّ وتُبصِرُ

    ولیس لعَضْبِ الحقّ فی الدَّہر کاسرًا

    ومَن قام للتکسیر بخلًا فیُکسَرُ

    ومَن ذا یعادینی وربّی یحبّنی

    ومَن ذا یُرادِینی إذا اللّٰہُ ینصُرُ

    ویعلَم ربّی سِرَّ قلبی وسِرَّہم

    وکلُّ خفیّ عندہ مُتَحَضِّرُ

    ولو کنتُ مردودَ الملیک لضَرَّنی

    عداوۃُ قوم کذّبونی وحقَّروا

    ولکننی صافَیتُ ربّی فجاء نی

    من اللّٰہ آیاتٌ کما أنت تنظُرُ

    وما کان جَوْرُ الخَلْق مستحدَثًا لنا

    فإنّ أذاہم سنّۃٌ لَا تُغَیَّرُ

    إِذَا قِیْل إنّک مرسَلٌ خِلتُ أنّنی

    دُعیتُ إلی أمرٍ عَلی الخَلْق یَعسِر

    أمُکْفِرِ مَہْلًابعضَ ہٰذا التحکُّمِ

    وخَفْ قَہْرَ رَبٍّ قال لَا تَقْفُ فَاحْذَرُ

    و إذ قلتُ إنّی مسلم قلتَ کافرٌ

    فأین التُّقٰی یَا أیہا المُتہوِّر

    وإنْ کنتَ لا تخشٰی فقُلْ لست مؤمنا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 306

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 306

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/306/mode/1up


    ویأتی زمانٌ تُسأَلُنَّ وتُخبَرُ

    وإنی ترکتُ النفسَ والخَلْقَ والہوٰی

    فلا السبُّ یؤذینی ولا المدح یُبطِرُ

    وَکَمْ مِن عَدوٍّ بعدما أکملَ الأذٰی

    أتانی فلم أَصْعَرْ وما کنتُ أصعَرُ

    أری الظلمَ یبقٰی فی الخراطیم وَسْمُہُ

    وأمّا علامات الأذٰی فتُغیَّرُ

    وَوَاللّٰہِ إنّی قد تبِعتُ مُحَمَّدًا

    وفی کل آنٍ مِن سناہ أُنوَّر

    عجبتُ لِأَعْمٰی لا یداوی عیونَہُ

    ومنّا بجَوْرِ الجہل یلوی ویَسخَرُ

    أَتَنسی نجاساتٍ رضِیتَ بأکلہا

    وتَہمِزُ بہتانًا بَرِیًّا وتذکُرُ

    إذا قَلَّ عِلم المَرء قَلَّ اتقاؤہ

    فیسعٰی إلٰی طرق الشّقا ویُزَوِّرُ

    وما أنا ممن یمنَع السیفُ قصدَہ

    فکیف یخوّفنی بشتمٍ مکفِّرُ

    لنا کلَّ یوم نصرۃٌ بعد نصرۃٍ

    فمُتْ أیہا النّاری بنارٍ تُسعّر

    وُعِدْنا مِنَ الرَّحْمٰن عِزًّا وسُؤْدَدًا

    فقُمْ وَامْحُ ہذا النقش إنْ کنتَ تقدِرُ

    ألا إنما الأیام رَجَعتْ إلی الہدٰی

    ہنیءًا لکم بعثی فبَشُّوا وأَبْشِروا

    دَعُوا غیرَ أمرِ اللّٰہ واسعَوا لأمرہِ

    ہو اللّٰہ مولانا أَطِیعوہ واحضُروا

    ألا لیس غیرُ اللّٰہ فی الدہر باقیًا

    وکلُّ جلیس مَا خَلَا اللّٰہَ یہجرُ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 307

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 307

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/307/mode/1up


    حاشیۃ متعلقۃ بالخطبۃ الإلہامیۃ

    ما الفرق بین آدم والمسیح الموعود

    إن اللّٰہ خلق آدم لینقل الناس من العدم إلی الوجود، ومن الوحدۃ إلی الکثرۃ ، و جعَلہم شعوبا و قبائل و فِرقا وطوائف لیُری ألوانَ القدرۃ، ولیبلو أیُّہم أحسنُ عملا ومن السابقین۔وجعل آدم مظہرًا لاسمہ الذی ہو مبدءٌ للعالم۔أعنی الأوّل کما جاء قولہ’’ہُوَ الأَوَّلُ‘‘ فی الکتاب المبین۔ولأجل أن الأوّلیۃ تقتضی ما بعدہا اقتضتْ نفسُ آدم رجالا کثیرا ونساءً، فنزَل الأمر وأضنَأَت النساءُ وکثُر الناس ومُلئت الأرض من المخلوقین۔ثم طال علیہم الأمد وکثرت فِرقہم وآراؤہم، وتخالفتْ أمانیہم وأہواؤہم، وکان أکثرہم فاسقین۔فطفقوا یصول بعضہم علی بعض، وزادوا فسقًا وطغوی، وأرادوا أن یأکل قویّہم ضعیفہم کدودۃ تأکل دودۃ أخری وکانوا غافلین۔حتی إذا اجتمعت فیہم کل ضلالۃ کانت من لوازم زمن المسیح الموعود، وصُبّتْ علی الإسلام کل مصیبۃ، وصار کالحیّ الموءُ وْد، وبلغت الأیّامُ منتہاہا وصارت کاللیالی فی الظلمات، واقتضی الزمان حربًا ہی آخر المحاربات*۔

    فہناک أرسل اللّٰہ مسیحہ لہذہ الحرب، لیجلو غیاہبَ الکفر

    کان اللّہ قد قدر من الازل ان تقع الحرب الشدید مرتین بین الشیطان والانسان۔ مرۃ فی اوّل الزمن و مرۃ فی اٰخرالزمان۔ فلمّا جاء وعد اولٰھما اغوی الشیطان الذی ھوثعبان قدیم حواء۔واخرج اٰدم من الجنۃ ونال ابلیس مرادا شاء۔ وکان من الغالبین۔ولما جاء وعدالاٰخرۃ اراد اللّٰہ ان یرد لاٰدم الکرۃ علی ابلیس و فوجہ ویقتل ھٰذاالدجال بحربۃ منہ فخلق المسیح الموعود الذی ھو اٰدم بمعنی لیدمر ھٰذا الثعبان و یُتبرّ ما علا تتبیرا۔ فکان مجئ المسیح واجبا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 308

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 308

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/308/mode/1up


    ویدمّر الظالمین بالحُجّۃ لا بالطعن والضرب، ویقطع دابر الکافرین، ولیرجع الناس إلی الاتّحاد والمحویّۃ بعد ما کانوا متخالفین. فثبت من ہذا المقام أن المسیح الموعود قد قابلَ آدم فی ہذہ الصفات کضدٍّ تقابلَ ضدًّا آخر فی الخواص والتأثیرات، وإن فی ذالک لآیۃ للمتقین۔ثم اعلم أن ہذا التضاد بین آدم والمسیح الموعود لیس مخفیا ومن النظریات، بل ہو أظہرُ الأشیاء ومن أجلی البدیہیات. فإن آدم أتی لیخرج النفوسَ إلی ہذہ الحیاۃ الدنیا ولیوقد بینہم نارَ الاختلاف والمعاداۃ، وأتی مسیحُ الأممِ لیرُدّہم إلی دار الفناء، ویرفع مِن بینہم الاختلاف والتشاجر والشحناء ، وأصل التفرقۃ والشتات، ویجرّہم إلی الاتحاد والمحویّۃ ونفیِ الغیر والمصافاۃ. وإن المسیح.. مَظہرٌ لاسم اللہ الذی ہو خاتم سلسلۃ المخلوقات، أعنی’’الآخِر‘‘الذی أُشِیر إلیہ فی قولہ تعالی’’ہُوَ الآخِرُ‘‘لِما ہو علامۃ لمنتہی الکائنات، فلأجل ذالک اقتضتْ نفس المسیح خَتْمَ سلسلۃ الکثرۃ بالممات، أو بِرَدِّ المذاہب إلی دین فیہ موتُ النفوس من الأہواء والإراداتِ والاسلاک علی الشریعۃ الفطریۃ التی تجری تحت المصالح الإلہیّۃ وتخلیصُ الناس من میل النفس بہواہا إلی العفو والانتقام والمحبّۃ والمعاداۃ. فإن الشریعۃ الفطریۃ التی تستخدم قوی الإنسان کلہا لا ترضی بأن تکون خادمۃً لقوّۃ واحدۃ، ولا تقیِّد أخلاق الإنسان فی دائرۃ العفو فقط، ولا فی دائرۃ الانتقام فقط، بل تحسبہ سجیّۃً غیر مرضیۃ، وتؤتی کلَّ قوۃ حقَّہا عند مصلحۃ داعیۃ وضرورۃ مقتضیۃ، و تغیّر حکمَ العفو والانتقام والمصافاۃ والمعاداۃ بحسب تغیّرات المصالح الوقتیۃ. و

    لیکون الفتح لاٰدم فی اٰخرالامروکان وعدامفعولا۔وقداشاراللّٰہ سبحانہ الی ھذاالفتح العظیم وقتل الدجال القدیم الذی ھو الشیطان فی قولہ قال 3 ۱؂۔ یعنی لا یقع امر استیصالک التام۔وتتبیرما علوت من انواع الشرک والکفروالفسق الا فی اٰخرالزمن وقت المسیح الامام۔فافھم ان کنت من العاقلین۔منہ۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 309

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 309

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/309/mode/1up


    ہذا ہو الموت من النفس والہوی والجذبات النفسانیۃ ودخولٌ فی الفانین.

    فحاصل الکلام إن المسیح الموعود ینقل الناسَ من الوجود إلی العدم، ویذکّرہم أیّامَ البیت المنہدم، وینقلہم إلی مثوی المیّتین.. إمّا بالإماتۃ الجسمانیۃ بأنواع الأسباب من الحوادث السماویۃ والأرضیۃ، وإما بإماتۃ النفس الأمّارۃ والموتِ الذی یَرِدُ علی أہل النشأۃ الثانیۃ بإخراج بقایا الغیریۃ وغیاہب النفسانیۃ وتکمیل مراتب المحویّۃ، وإن فیہ لہدًی للمتفکّرین.

    ثم اعلم أن المسیح الموعود فی کتاب اللّٰہ لیس ہو عیسی ابن مریم صاحب الإنجیل وخادم الشریعۃ الموسویۃ، کما ظنَّ بعض الجہلاء من الفَیج الأعوج والفءۃ الخاطءۃ، بل ہو خاتمُ الخلفاء من ہذہ الأُمّۃ، کما کان عیسٰی خاتمَ خلفاء السلسلۃ الکلیمیّۃ، وکان لہا کآخر اللبنۃ وخاتمِ المرسلین. وإنّ ہذا لہو الحق، فویل للذین یقرء ون القرآن ثم یمرّون منکرین. وإن الفرقان قد حکم بین المتنازعین فی ہذہ المسألۃ، فإنہ صرّح فی سورۃ النور بقولہ ’’مِنْکُمْ‘‘بأن خاتم الأئمّۃ من ہذہ الملّۃ، وکذالک صرح ہذا الأمر فی سورۃ التحریم والبقرۃ والفاتحۃ، فأین تفرّون من النصوص القطعیۃ البیّنۃ؟ وہل بعد القرآن حاجۃ إلی دلیل لذوی الفطنۃ؟ فبأی حدیث تؤمنون بعد ہذہ الصحف المطہَّرۃ؟ وقد وعد اللّٰہ المؤمنین فی سورۃ التحریم فی قولہ’’333 3‘‘۱؂ أن یخلق ابنَ مریم منہم، وہو یرِث ہذا الاسم ویکون عیسی مِن غیر فرقٍ فی الماہیۃ، فقد تقررَ فی ہذہ الآیۃ وعدًا من اللّٰہ أن فردًا من ہذہ الأمّۃ یسمَّی ابنَ مریم ویُنفَخ فیہ روحہ بعد التقاۃ التامۃ . فأنا ذالک المسیحالذی لُمْتُمونی فیہ، ولا مبدِّلَ لکلمات اللّٰہ ذی الجبروت والعزّۃ. أتجعلون رِزقکم مِن وعد اللّٰہ أن تکونوا یہودا کیہود أمّۃ موسٰی فی الخبث والتمرّد العظیم، ولا تریدون أن یکون المسیح منکم کمسیح سلسلۃ الکلیم؟ وَیْحَکُمْ! إنکم رضیتم بمماثلۃ الشر والضیر، ولا ترضون أن تکون لکم مماثلۃ فی الخیر. فواللّٰہ لا یفعل عدوّ بعدوّ ما تفعلون بأنفسکم، وقد نبذتم کلام اللّٰہ وراء



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 310

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 310

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/310/mode/1up


    ظہورکم، وذکّرنا فتناسیتم، وأرینا فتعامیتم، ودعونا فأبیتم، وتبِعتم أمّارتکم فی کل ما مارَیتم یا حزبَ العِدا. أ تُترَکون سُدًی؟ أو یُغفَر لکم کلُّ ما اجترحتم من الہوی؟ ما لکم لا تفکّرون فی القرآن ولا ترون ما قال ربّکم بأحسن البیان؟ ألم یکفِ لکم آیۃ سورۃ التحریم، أو أعرضتم عن کلام اللّٰہ الکریم؟ انظروا کیف ضرب اللّٰہ مثلَ مریم لہذہ الأمّۃ فی ہذہ السورۃ، ووعَد فی ہذہ الحُلّۃ أن ابن مریم منکم عند التقاۃ الکاملۃ. وکان من الواجب لتحقیق ہذا المَثل المذکور فی ہذہ الآیۃ بأن یکون فرد من ہذہ الأمّۃ عیسی ابنَ مریم لیتحقّق المثل فی الخارج من غیر الشک والشبہۃ، وإلّا فیکون ہذا المثل عبثا وکذبا لیس مِصداقہ فرد من أفراد ہذہ الملّۃ، وذالک مما لا یلیق بشأن حضرۃ التقدّس والعزّۃ. ہذا ہو الحق الذی قال اللّٰہ ذو الجلال، فماذا بعد الحق إلا الضلال؟ وأما عیسی الذی ہو صاحب الإنجیل فقد مات وشہد علیہ ربّنا فی کتابہ الجلیل، وما کان لہ أن یعود إلی الدنیا ویکون خاتم الأنبیاء ، وقد خُتِمت النبوۃ علی نبیّنا صلی اللّٰہ علیہ وسلم، فلا نبی بعدہ إلا الذی نُوِّرَ بنورہ و جُعل وارثَہ من حضرۃ الکبریاء ۔ اعلموا أن الختمیۃ أُعطیتْ من الأزل لمحمّدصلی اللّٰہ علیہ وسلم، ثم أُعطیتْ لمن علَّمہ روحُہ وجعَلہ ظلَّہ، فتبارکَ من علّم وتعلّم*.فإن الختمیۃ الحقیقیۃ کانت مقدَّرۃ فی الألف السادس الذی ہو یوم سادس من أیّام الرحمٰن، لیشابہ أبا البشر

    ھٰذہ اشارۃ الٰی وحی من اللّٰہ کُتب فی البراھین الاحمدیۃ وقدمضٰی علیہ ازید من عشرین سنۃ من المدۃ فان اللّٰہ کان اوحٰی الیّ وقال: کل برکۃ من محمّدٍ صلی اللّٰہ علیہ وسلم فتبارک من علّم وتعلّم۔ یعنی ان النبی صلی اللّٰہ علّمک من تاثیرروحانیتہ وافاض اناء قلبک بفیض رحمتہ لیدخلک فی صحابتہ ولیشرکک فی برکتہ ولیتم نَبْأُ اللّٰہ وآخرین منھم بفضلہ ومنّتہ۔ولمّاکان ہٰذاالنبأ الاصل المحکم والبرھان الاعظم علی دعویٰ فی القرآن اشاراللّٰہ سبحانہ الیہ فی البراھین لیکون ذکرہ ہٰذاحجۃً علی الاعداء من جھۃ طول الزمان۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 311

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 311

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/311/mode/1up


    ہو خاتمَ نوعِ الإنسان. واقتضت مصالح أخرٰی أن یُبعث رسولنا فی الیوم الخامس. أعنی فی الألف الخامس بعد آدم، لِما کان الیوم الخامس یومَ اجتماع العالَم الکبیر، وہو ظِلٌّ لآدم الذی أعزّہ اللّٰہ وأکرمَ، فإن آدم جمع فی نفسہ کلَّ ما تفرّقَ فیہ ووصل کلما تجذَّمَ، فلا شک أن العالَم الکبیر قد نزل بمنزلۃ خِلقۃٍ أولٰی لآدم فی صُوَرٍ متنوّعۃ، فقد خُلِق آدم بہذا المعنی فی الیوم الخامس من غیر شک وشبہۃ، ثم أراد اللّٰہ أن یُنشِأَ نبیَّنا الذی ہو آدم خلقًا آخر فی الألف السادس بعد خِلقتہ الأولٰی، کما أنشأ مِن قبل صفیَّہ آدمَ فی آخر الیوم السادس من أیام بدوالفطرۃ لیتمّ المشابہۃ فی الأولی والأخری، وہو یوم الجمعۃ الحقیقیۃ، وکان جمعۃُ آدم ظلاًّ لہ عند أولی النُہَی، فاتّخذَ علی طریق البروز مظہرًا لہ مِن أمّتہ، وہو لہ کالعین فی اسمہ وماہیّتہ، وخلَقہ اللّٰہ فی الیوم السادس بحساب أیام بدونشأۃ الدنیا لتکمیل مماثلتہ۔أعنی فی آخر الألف السادس لیشابہ آدم فی یوم خلقتہ، وہو الجمعۃ حقیقۃً، لأن اللّٰہ قدّر أنہ یجمع الفِرق المتفرّقۃ فی ہذا الیوم جمعًا برحمۃٍ کاملۃٍ، وینفَخ فی الصور۔یعنی یتجلّی اللّٰہ لجمعہم فإذا ہم مجتمعون علی ملّۃ واحدۃ إلّا الذین شقُوا بمشیءۃ وحبَسہم سجنُ شِقوۃ، وإلیہ أشار سبحانہ فی قولہ ’’3‘‘۱؂ فی سورۃ الجمعۃ، إیماءً إلی یوم الجمعۃ الحقیقیۃ. وأراد من ہذا القول أن المسیح الموعود الذی یأتی من بعد خاتم الأنبیاء ہو محمد صلی اللہ علیہ وسلم من حیث المضاہاۃ التامۃ، ورفقاء ہ کالصحابۃ، وأنہ ہو عیسی الموعود لہذہ الأمّۃ، وعدًا من اللّٰہ ذی العزّۃ فی سورۃ التحریم و النور والفاتحۃ۔ قولَ الحق الذی فیہ یمترون۔ما کان لنبی أن یأتی بعد خاتم الأنبیاء إلا الذی جُعل وارثَہ مِن أُمّتہ، وأُعطیَ مِن اسمہ وہویّتہ، ویعلمہ العالمون۔فذالک مسیحکم الذی تنظرون إلیہ ولا تعرفونہ، وإلی السماء أعینَکم ترفعون۔أتظنّون أن یردّ اللہ عیسی ابن مریم إلی الدنیا بعد موتہ وبعد خاتم النبیین؟ ہیہات ہیہات لما تظنون۔و



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 312

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 312

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/312/mode/1up


    قد وعد اللّہ أنہ یُمسِک النفسَ التی قضی علیہا الموت، واللّٰہ لا یخلف وعدہ ولکنکم قوم تجہلون. أ تزعمون أنہ یُرسِل عیسی إلی الدنیا، ویوحی إلیہ إلی أربعین سنۃ، ویجعلہ خاتم الأنبیاء وینسی قولہ’’3 3‘‘ ۱؂ سبحانہ وتعالی عمّا تصِفون! إنْ تتّبعون إلا ألفاظا لا تعلمون حقیقتہا، ولو رددتموہا إلی حَکَمٍ من اللّٰہ الذی أُرسلَ إلیکم لکان خیرا لکم إن کنتم تعلمون. یا حسرۃ علیکم! إنکم جعلتم عِلم الدین سَمْرًا، وتجادلون علیہ بُخْلًا وحَسَدًا، وطبع اللّٰہ علی قلوبکم فلا تبصرون. ألا ترون إلی السلسلتین المتقابلتین، أو غلبتْکم شِقوتکم فلا توانسون؟ وتقولون لیس ذکر المسیح الموعود فی القرآن، وقد مُلِأَ القرآن من ذکرہ ولکن لا یراہ العمون. ألا إن لعنۃ اللّٰہ علی الکاذبین الذین یکذّبون کتاب اللّٰہ ویحرّفونہ ولا یخافون. وإذا قیل لہم تعالوا نبیّن لکم حُجج اللّٰہ قالوا إنّا نحن المہتدون. وما فی أیدیہم إلا قصص باطلۃ ولا یتّقون. ویسخرون من الذین آمنوا وہم یعلمون. وما کان مجیئی فی آخر السلسلۃ المحمدیۃ إلّا لإکمال المماثلۃ ولتوفیۃ وزن المقابلۃ، ولیرُدَّ الکَرّۃ لآدم بعد الکَرّۃ الشیطانیۃ*، فما لہم لا یتفکّرون!

    أ ۔کان عسیرا علی اللّٰہ أن یخلق کعیسی ابن مریم عیسٰی آخرَ، سبحانہ، إذا قضی أمرًا فإنما یقول لہ کن فیکون. ہو اللّٰہ الذی بعث مثیلَ موسٰی فی أوّل السلسلۃ المحمّدیۃ، فظہر منہ أنہ کان یرید أن یخلق مثلَ عیسٰی فی آخرہا لیتشابہ السلسلتان بالمشابہۃ التامۃ، فما لکم لا تؤمنون؟أیہا الناس!آمِنوا أو لا تؤمنواإن اللّٰہ لن یترک ہذہ السلسلۃ حتی یُتمّہا ولن یترک حیّۃَ آدم حتی یقتلہا، فرُدُّوا ما أراد اللّٰہ إن کنتم تقدرون۔أترُدّون

    ان اللّہ خلق اٰدم وجعلہ سیداوحاکما وامیراعلی کل ذی روح من الانس والجان۔کمایفھم من اٰیۃ اسجدوالاٰدم ثم ازلّہ الشیطان واَخرجہ من الجنان۔وردالحکومۃ الی ھٰذاالثعبان۔ومس اٰدم ذلۃ وخزی فی ھٰذہ الحرب والھوان۔وان الحرب سجال۔والاتقیاء مال عندالرحمٰن۔فخلق اللہ المسیح الموعودلیجعل الھزیمۃ علی الشیطان فی اٰخرالزمان۔وکان وعدًا مکتوبا فی القرآن۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 313

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 313

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/313/mode/1up


    نعمۃ اللّہ بعد نزولہا أیہا المحرومون؟ وقد تم وعد اللّٰہ صدقا وحقا، فلا تشتروا الضلالۃ أیہا الخاسرون. أ ۔تبخلون بما أنعم اللّٰہ علی عبد من عبادہ؟ أتُعجِزون اللّٰہ بألسنکم وحِیلِکم ومکائدکم؟ فاجمعوا کلّ مکرکم، وادعوا الذین سبقوکم مکرًا و زورًا، واقعدوا فی کل طریق ولا تُمہِلونِ. وستنظرون أن اللّٰہ یخزیکم ویردّ علیکم کیدکم ولا تضرّونہ شیئا ولا تُنصَرون. أحسبتم أن إنسانا فعَل فعلًا مِن تلقاء نفسہ؟ کلا۔بل ہو اللّٰہ الذی یُصلِح الأرض بعد فسادہا، ألیست الأرض مُنجَّسۃ من فساد، فما لکم لا تنظرون؟ إنکم ترکتم الصراط، فترککم اللّٰہ وذہب بنور قلوبکم، وکذالک یُجزَی المجرمون. أعجبتم أن جاء کم إمام من أنفسکم فی آخر الأزمنۃ لیتساوی السلسلتان ککَفَّتَی المیزانِ، ما لکم کیف تعجبون؟ کذالک لیتمّ وعدُ اللّٰہ فی التحریم والنور والفاتحۃ والبقرۃ، ما لکم لا تفکّرون؟ وقد نزلت الآیات وحصحص الحق وظہرت البیّنات ثم أنتم تُعرِضون. وما طلبتم من حُجّۃ إلّا أُعطیَ لکم فوج منہا ثم لا تنتہون. ألا ترون إلی أرضکم کیف ینقُصہا اللّٰہ من أطرافہا، والرقاب تحت قدمی ہذہ تتذلل، والناس مِن کل فَجٍّ یجتمعون؟ ولو کان ہذا الأمر من عند غیر اللّٰہ لما لبِثتُ فیکم إلی ثلا ثین سنۃ بعد دعوتی کما أنتم تشاہدون. و لَأُہلکتُ کما یُہلَک المفترون. أجئتُ شیءًا فرِیًّا وکنتم من قبل تنتظرون؟ وقد ابتہلتم کل الابتہال، لیُہلِکنی ربّی کأہل الضلال، فأُعطیتْ لی برکۃٌ علی برکۃ، ولُعِنَتْ کلماتُکم، وضُربتْ علی وجوہکم دعواتُکم، فأصبحتم مُحقَّرین مُہانین بما کنتم تُہینون. ما کان اللّٰہ لیُہلِکنی قبل أن یتمّ أمری، ولی سرٌّ بربّی لا یعلمہ الملا۔ئکۃ، فکیف تعرفوننی أیہا الجاہلون الحاسدون؟ ولیس لی مقامی عندہ بظاہر الأعمال ولا بأقوال، ولا بعلم واستدلال، بل بسرٍّ فی قلبی ہو أثقل عندہ من جبال. وإن سرّی یُحیِی الأموات، ویُنبِت المَوات، ویُرِی الآیات، فہل من طالب من ذوی الحصاۃ، وہل من قوم یطلبون؟ وإنی جُعِلتُ من ربّی آیۃً للإسلام، وحُجّۃً من اللّٰہ العلّام، فسوف یعلم المنکرون۔أَسمِعْ بہم وأَبْصِرْ یومَ یأتونہ، وقد أنفدوا الأعمار فی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 314

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 314

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/314/mode/1up


    ہذہ عمیًا، ویُذکَّرون فلا یبالون. وإنی جئتُ لأنقُل الناس من الوجود إلی العدم بحکمِ ربّ العزّۃ*، وأُرِیَ الساعۃَ قبل الساعۃ، وترون أن الأمراض تُشاع والنفوس تُضاع، وسیذوق الناس موتًا ہو موت من أہواء الغَیریّۃ. وجئتُ لأنقل الناس من الکثر۔ۃ إلی الوحدۃ، وإلی الاتّفاق من المخالفۃ، وإلی الاجتماع من التفرقۃ، ولذالک خُلِقَ أسبابُہا، وفُتِح أبوابُہا. ألا ترون إلی الطُرق کیف کُشفتْ؟ وإلی الوابورۃ کیف أُجریتْ؟ وإلی العِشار کیف عُطّلتْ؟ وإلی الأخبار کیف یُسِّرَ إیصالُہا، والخیالات تبادلتْ؟ وإلی النفوس کیف زُوّجتْ؟ وترون أن الناس یُنقَلون من ہذہ الدنیا إلی دار الفناء بمحاربات أوقدتْ نارہا بین الملوک وبأنواع الوباء ثم بإشاعۃ لُبِّ تعلیم القرآن، وحقیقۃِ کتاب اللّٰہ الرحمٰن، الذی أُرسلتُ لہ فی ہذا الزمان، فإن ہذا التعلیم یدعو إلی الموت.. أعنی إلی موتٍ یَرِدُ علی النفس بترک الغَیریّۃ والہوٰی، ویدعو إلی محویّۃٍ فی الشریعۃ الفطریّۃ وحالۃٍ کحالۃِ مَن مات وفنٰی، ویجرّ إلی تعطُّلٍ تامّ من حرکات الاختیار، وموافقۃٍ بالفتاوی التی تحصُل للقلب فی کل حین من اللّٰہ مُنزِّلِ الأقدار۔وفی ہذہ الحالۃ یکون الإنسان مستہلکۃَ الذات غیرَ تابعٍ لأمر النفس والجذبات، حتی لا یُنسَب إلیہ سَکون ولا حرکۃ ولا ترک ولا بطش ویتعالٰی شأنہ عن التغیرات، ولا یوجد فیہ من القصد والإرادۃ أثر، ولا من المدح والمذمّۃ خبر، ویصیر کالأموات۔فہذا نوع من الموت، فإنہ لا یملک أہلُ ہذا الموت حرکۃً ولا سُکونًا، ولا ألَمًا ولا لذّۃ،لا راحۃً ولا تعبًا، ولا محبّۃ ولا عداوۃ، ولا عفوًا ولا انتقامًا، ولا بُخلًا ولا سخاوۃ، ولا جُبنًا ولا شجاعۃ، ولا غضبًا ولا

    قد قلنا غیرہ مرّۃ ان النقل من الوجود الی العدم۔ لیس بالسیف و السنان۔ بل بامرٍ من اللّہ الدیّان۔فان اللّٰہ کتب فی کتبہ ان علامۃ ظھور المسیح الموعود ان تسمعوا اخبارالمحاربات فی الاٰفاق والاقطار۔واخبارشیوع الوباء فی الدیار۔ثم من علامۃ المسیح انہ یجذب الناس الی کمال نقطۃ التقاۃ۔وان ھو الا نوع من الممات۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 315

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 315

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/315/mode/1up


    تحنُّنًا، بل ہو میّتٌ فی أیدی الحیّ القیّوم، ما بقی فیہ حرکۃٌ ولا ہوی، ولا یُنسَب إلیہ شیء من ہذہ العوارض کما لا یُنسَب إلی الموتٰی. ولا شک أن ہذہ الحالۃ موت وإنہا منتہی مراتب العبودیۃ، والخروج من العیشۃ النفسانیۃ، وإلیہا تنتہی سیر الأولیاء الذاہبین إلی الحضرۃ الأحدیۃ. ہذا تعلیم القرآن، وکلُّ تعلیم دون ذالک فی الجذب إلی الرحمٰن، ولیس بعدہ مرتبۃ من مراتب السلوک والعرفان عند ذوی العقل والفکر والإمعان. وإن التوراۃ أمال الناسَ إلی الانتقام، وعندہ لا مفرَّ للظالم ولا خلاصَ، وإن عیسٰی شرّع لأمّتہ أنّ أحدہم إذا لُطِم فی خدّہ وضَع الخدّ الآخر لمن لطمہ ولا یطلب القصاصَ. فلا شک أن ہذین الحزبین لا یشاورون الشریعۃ الفِطریّۃ، ولا یتّبعون إلّا الأوامر القانونیۃ. وأما الرجل المحمّدی فقد أُمر لہ أن یتّبع الشریعۃ الفطریۃ کما یتبع الشریعۃ القانونیۃ، ولا یُقطَع أمرٌ إلا بعد شہادۃ الشریعۃ الفطریۃ، ولذالک سُمِّیَ الإسلام دینَ الفطرۃ للزوم الفطرۃ لہذہ الملّۃ، وإلیہ أشار نبیّناصلی اللّٰہ علیہ وسلم استَفْتِ قلبَک ولو أفتاک المُفتون". فانظرْ کیف رغَّب فی الشریعۃ الفطریۃ ولم یقنع علی ما قال العالمون. فالمسلم الکامل من یتّبع الشریعتین، وینظر بالعینین، فیُہدَی إلی الصراط ولا یخدعہ الخادعون. ولذالک ذکر اللّٰہ فی محامد الإسلام أنہ شریعۃ فطریۃ، حیث قال’’3 3۱؂ ‘‘۔وہذا من أعظم فضائل ہذہ الملّۃ ومناقبِ تلک الشریعۃ. فإنہ یوجد فی ہذا التعلیم مدار الأمر علی القوۃ القُدسیۃ القاضیۃ الموجودۃ فی النشأۃ الإنسانیۃ المُوصِلۃ إلی کمال تام فی مراتب المحویّۃ، فلا یبقی معہا مَنْفَذ للتصرّفات النفسانیۃ، لِما فیہ عملٌ علی الشہادۃ الفطریۃ. وأمّا التوراۃ والإنجیل فیترکان الإنسان إلی حدّ ہو أبعدُ من الشہادۃ الفطریۃ القدسیۃ، وأقربُ إلی دخل إفراط القوۃ الغضبیّۃ، أو تفریط القوۃ الواہمۃ، حتی یمکِن أن یُسمَّی المنتقم فی بعض المواضع ذئبًا مؤذیًا عند



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 316

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 316

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/316/mode/1up


    العقلاء ، أو یُسمَّی الذی عفا فی غیر محلّہ وأغضٰی مثلًا عند رؤیۃ فسقِ أہلہ دَیُّوثًا وقیحًا عند أہل الغیرۃ والحیاء۔ولذالک تری فی بعض المواضع رجلًا سَرَّہ تعلیمُ العفو یترُک حقیقۃَ العفو والرحمۃ، ویجاوز حدود الغیرۃ الإنسانیۃ۔فإن العفو فی کل محلّ لیس بمحمود عند العاقلین، وکذالک الانتقام فی کل مقام لیس بخیر عند المتدبّرین. فلا شک أنہ مَن أوجب العفو علی نفسہ فی کل مقام بمتابعۃ الإنجیل فقد وضَع الإحسان فی غیر محلّہ فی بعض الحالات، ومَن أوجب الانتقام علی نفسہ فی کل مقام بمتابعۃ التوراۃ فقد وضع القصاص فی غیر محلّہ وانحطّ من مدارج الحسنات. وأمّا القرآن فقد رغّب فی مثل ہذہ المواضع إلی شہادۃ الشریعۃ الفطریۃ التی تنبع من عین القوۃ القدسیۃ، وتنزِل من روح الأمین فی جَذْرِ القلوب الصافیۃ، وقال: 333 ۱؂ فانظرْ إلی ہذہ الدقیقۃ الروحانیۃ، فإنہ أمَر بالعفو عن الجریمۃ بشرط أن یتحقق فیہ إصلاحٌ لنفسٍ، وإلّا فجزاء السیءۃ بالسیءۃ. ولما کان القرآن خاتم الکتبِ وأکملَہا وأحسن الصحف وأجملَہا، وَضَع أساس التعلیم علی منتہی معراج الکمال، وجعَل الشریعۃ الفطریۃ زوجًا للشریعۃ القانونیۃ فی کل الأحوال، لیعصم الناس من الضلال، وأراد أن یجعل الإنسان کالمیت لا یتحرّک إلی الیمین ولا إلی الشمال، ولا یقدر علی عفو ولا علی انتقام إلا بحُکم المصلحۃ من اللّٰہ ذی الجلال. فہذا ہو الموت الذی أُرسِلَ لہ المسیح الموعود لیُکمِلہ بإذن الربّ الفعّال، ولأجل ذالک قلتُ إن المسیح الموعود ینقل الناسَ من الوجود إلی العدم، فہذا نوع من النقل وقد سبق قلیل من ہذا المقال. وشتّان بین ہذا التعلیم الجلیل وتعلیم التوراۃ والإنجیل، فاسأل الذین قبِلوا وساوس الدجّال۔إن ہذا التعلیم یہدی لِلّتی ہی أقوَمُ، لیس فیہ إفراط ولا تفریط،ولا ترک مصلحۃ وحکمۃ، ولا ترک مقتضی الوقت والحال،بل ہو یجری تحت مجاری الأوامرالشریعۃ الفطریۃ وفتاوی القوۃ القدسیۃ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 317

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 317

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/317/mode/1up


    ولا یمیل عن الاعتدال. وقد قُدّر من الأزل أن المسیح الموعود یُشیع ہذا التعلیم المحمود حق الإشاعۃ، لیُمیت السعداءَ قبل موت الساعۃ، فہناک یموت الصالحون من کمال الإطاعۃ، وہذا الموت یُعطَی للقلوب السلیمۃ الصافیۃ، ویشربون کأس المحویّۃ، ویغیبون فی بحر الوحدۃ بعد نَضْوِ لباس الغَیریّۃ. وأمّا الذین شقُوا فیرد علیہم فی آخر الأمر رجس من السماء بأنواع الوباء ، أو بالمحاربات وسفک الدماء ، فیسری بینہم الإقعاصُ والقَعْص کقُعاص الغنم تقدیرًا من حضرۃ الکبریاء ، ویکثُر المحاربات علی الأرض فتختتم حرب وتبدو أخری، وتسمعون من کل طرف أخبار الموتٰی. وذالک کلہ لخاصیۃِ وجود المسیح، فإن اللّٰہ نزّلہ کالمُجِیح، وہذا من أکبر علاماتہ وخواص ذاتہ، فإنہ قابلَ آدم فی ہذہ الصفات، مع بعض أمور المضاہاۃ، أما المضاہاۃ فتوجد فی نوع الخِلقۃ، فإن آدم خُلق منہ حوّاءُ کالتَوءَ م مِن ید القدرۃ، وکذالک خُلق المسیح الموعود تَوْءَ مًا وتولّدتْ معہ صبیۃٌ مسمّاۃ بالجَنّۃ، وماتت إلی ستۃ أشہر من یوم الولادۃ وذہبت إلی الجنّۃ، وما ماتت حوّاء لتکون سببًا للکثرۃ ، فإن آدم قد ظہر لینقل الناس من العدم إلی الوجود، فکان حقُّ تَوْءَ مِہ أن یبقی لینصرہ علی تکمیل المقصود، وأمّا المسیح الموعود فقد ظہر لینقل الناس من الحیاۃ إلی المَنیّۃ، فکان حقُّ توء مِہ أن ینقل من ہذہ الدار لیکون إرہاصًا للإرادۃ المَنْویّۃ۔ ثم إنّ آدم خُلق فی یوم الجمعۃ، وکذالک وُلد المسیح الموعود فی ہذا الیوم فی الساعۃ المبارکۃ۔ثم إن آدم خُلِق فی الیوم السادس، وکذالک المسیح الموعود خُلق فی الألف السادس۔وأما الآفات التی قُدّر ظہورہا فی وقت المسیح۔فمِن أعظمہا خروج یأجوج ومأجوج، وخروج الدجّال الوقیح، وہم فتنۃ للمسلمین عند عصیانہم وفرارہم من اللّٰہ الودود، وبلاء عظیم سُلّط علیہم کما سُلّط علی الیہود واعلم أن یأجوج ومأجوج قومان یستعملون النار وأجیجہ فی المحاربات وغیرہا من المصنوعات، ولذالک سُمّوا بہذین الاسمین، فإن الأجیج صفۃ النار وکذالک



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 318

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 318

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/318/mode/1up


    یکون حربہم بالموادّ الناریات، ویفوقون کلَّ من فی الأرض بہذا الطریق من القتال، ومِن کل حدَبٍ ینسِلون، ولا یمنعہم بحر ولا جبل من الجبال، ویخرّ الملوک أمامہم خائفین، ولا تبقی لأحدٍ یدُ المقاومۃ، ویُداسَون تحتہم إلی الساعۃ الموعودۃ. ومَن دخل فی ہاتین الحجارتین ولو کان لہ مملکۃ عظمٰی، فطُحن کما یُطحَن الحَبُّ فی الرَحی، وتُزلزَل بہما الأرض زلزالہا، وتُحرَّک جبالہا، ویُشاع ضلالہا، ولا یُسمَع دعاءٌ ولا یصل إلی العرش بکاءٌ ، ویصیب المسلمین مصیبۃ تأکل أموالہم وإقبالہم وأعراضہم، وتُہتَک أسرار ملوک الإسلام، ویظہَر علی الناس أنہم کانوا مَورِدَ غضبِ اللّٰہ من العصیان والإجرام. ویُنْزَع منہم رعبہم وإقبالہم وشوکتہم وجلالہم بما کانوا لا یتّقون. ویبارون الأعداء من طریق وینہزمون من سبعۃ طُرق بما کانوا لا یحسنون۔ یراء ون الناس ولا یتّبعون رسول اللّٰہ وسُنّتہ ولا یتدیّنون. وإنْ ہم إلا کالصور لیس الروح فیہم، فلا ینظر إلیہم اللّٰہ بالرحمۃ ولا ہم یُنصَرون. وکان اللّٰہ یرید أن یتوب علیہم إن کانوا یتضرّعون، فما تابوا وما تضرّعوا فنزَل علی المجرمین وبالہم إلا الذین یخشعون. ویرون أیام المصائب ولیالیہا کما رأی الملعونون. فعند ذالک یقوم المسیح أمام ربہ الجلیل، ویدعوہ فی اللّیل الطویل، بالصراخ والعویل، ویذوب ذوبان الثلج علی النار، ویبتہل لمصیبۃ نزلتْ علی الدیار، ویذکُر اللّٰہَ بدموع جاریۃ وعبرات متحدّرۃ، فیُسمَعُ دعاؤہ لمقامٍ لہ عند ربہ، وتنْزل ملا۔ئکۃ الإیواء ، فیفعل اللہ ما یفعل، وینجّی الناس من الوباء . فہناک یُعرَف المسیح فی الأرض کما عُرِفَ فی السماء ، ویوضع لہ القبول فی قلوب العامۃ والأمراء ، حتی یتبرّک الملوک بثیابہ. وہذا کلہ من اللّٰہ ومن جنابہ وفی أعین الناس عجیب. ففکِّرْ فی القرآن والأحادیث إن کنت تریب. وما قلتُ من عندی بل ہو عقیدۃ الجمہور من

    الصلحاء المسلمین، ومکتوبٌ فی کتاب ربّ العالمین.

    *



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 319

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 319

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/319/mode/1up


    وَالحَالَۃُ المَوْجُوْدَۃُ تدعو المسیح الموعُودَ

    وَالمَہْدی المَعْہُودَ

    إن الأرض مُلِئت ظلمًا وجَورًا، وأحاط الفساد نجدًا وغَورا، والحقائق زالت عن أماکنہا، والدقائق تحوّلت عن مراکزہا. ونضت الملّۃ لباس زینتہا، وأغمدت الشریعۃ سیف شوکتہا، وأُضیعَ أسرار بطنہا ورموز ہویّتہا، وأُریقَ دماء أبناۂا وحفدتہا، حتی إن السماء بکت علی ثُکلہا وغربتہا، وما بقی جارحۃ من جوارحہا إلّا سقمتْ، وما مُضنِءۃ من مضنئاتہا إلا عقمتْ، فالآن ہی عجوز فقدت قواہا، وشیخۃ غیّرت صورتہا وسناہا، وفی لسانہا لُکْنۃ أظہرتہا، وفی أسنانہا قلوحۃ علتْہا. أ۔ہذہ الملۃ ہی الملّۃ التی أتی بہا خاتم النبیین وأکملَہا ربّ العالمین؟ کلا.. بل ہی فسدت کل الفساد من أیدی المبتدعین الذین جعلوا القرآن عِضِین، وضلّوا وأضلّوا وما کانوا متفقہین. إنہم قوم لا یملکون غیر القشرۃ، ولا یدْرون ما لُبّ الحقیقۃ، ثم یزعمون أنہم من العالِمین، بل من مشایخ الدین. ولا تجری علی ألسنہم إلا قصص نحتتْ آباؤہم، وما بقی عندہم إلا أمانیہم وأہواؤہم، واحتفلت جوامعہم من قوم لا یعلمون سرّ العبودیۃ، ویجادلون بألفاظ سمعوہا من الفءۃ الخاطءۃ، وما وطئتْ قدمہم سکک الروحانیۃ. یصلّون ولا یدرون حقیقۃ الصلٰوۃ، ویقرء ون القرآن ولا یفہمون کلام ربّ الکائنات، وظہر الحق فلا یعرفونہ، وبعث اللّٰہ مسیحہ فلا یقبلونہ، ویحقّرونہ ولا یوقّرونہ، ولا یأتونہ مؤمنین۔وجحدوا بالحق لما جاء ہم وکانوا من قبل منتظرین۔وإذا قیل لہم بادِروا الخیر أیہا الناس،ولا تتّبعوا خطوات الخنّاس، قالوا إنکم من الضالین۔

    وکذّبونی وما فتّشوا حق التفتیش، ولا یمرّون علیّ إلّا مستکبرین۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 320

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 320

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/320/mode/1up


    و نسوا کُلّ ما ذکّرہم القرآن، ولا یعلمون ما أنزل الرحمٰن، ویُنفِدون الأعمار غافلین. ولو عرفوا القرآن لعرفونی، ولکنہم نبذوا کتاب اللّہ وراء ظہورہم وکانوا مجترئین. ویقولون لستَ مرسلا، وکفی باللّٰہ وآیاتہ شہیدًا لو کانوا طالبین. ووقفوا ألسنہم علی السب والتوہین، واستظہروا علی مخالفۃ القرآن بأخبار ضعیفۃ ما مسَّہا نفحۃُ الیقین. وإن اللّٰہ قد جلّی الحق فلا یسمعون، وکشَف السرّ فلا یلتفتون. قرء وا الفرقان وما اطّلعوا علی أسرار دفائنہ، وصُفِّدوا فی ألفاظ القرآن وما أُعطوا أغلاق خزائنہ. فکیف کان من الممکن أن یرجعوا سالمین من ہذا الطریق؟ فلأجل ذالک زاغوا من محجّۃ التحقیق، وما ذاقوا جرعۃ من ہذا الرحیق، وما کانوا مستبصرین۔ثم لَمّا جعلنی اللّٰہ مسیحًا موعودًا وبعثنی صدقا وحقا عند وقت الضرورۃ، طفقوا یکذّبوننی ویکفّروننی ویذکروننی بأقبح الصورۃ، وما کانوا منتہین. وقد وافت شمسُ الزمان غروبَہا، وحیّۃ الحیات قصدتْ دُروبہا، وما بقِی من الدنیا إلّا قلیل من حین. أیریدون أن یطول أجلُ الشیطان؟ وإن زماننا ہذا ہو آخر الزمان، وقد أہلکَ کثیرا مّن الناس إلی ہذا الأوان. وإن آدم ہوَی مِن قبل فی مَصاف، وہزمہ الشیطان فما رأَی الغلبۃ إلی ستۃ آلاف، ومُزّقتْ ذُرّیّتہ وفُرِّقت فی أطراف، فإلی کم یکون الشیطان من المنظَرین؟ ألم یُغْوِ الناس أجمعین۔إلا قلیلًا من عباد اللّٰہ الصالحین؟ فقد أتمّ أمرہ وکَمَّل فعلہ وحان أن یُعان آدم من ربّ العالمین۔ولا شک ولا شبہۃ أنّ إنظار الشیطان کان إلی آخر الزمان، کما یُفہَم من القرآن، أعنی لفظ ’’الإنظار‘‘الذی جاء فی الفرقان، فإن اللّٰہ خاطبہ وقال’’33‘‘۱؂، یعنی یوم البعث الذی یُبعث الناس فیہ بعد موت الضلالۃ بإذن الحیّ القیّوم۔ولا شک أن ہذا الیوم یوم یشابہ یومَ خلقۃِ آدم بما أراد اللّٰہ فیہ أن یخلق مثیل آدم، ثم یبث فی الأرض ذرّیّۃ الروحانیۃ ویجعلہم فوق کل من قطع من اللّٰہ وتجذّمَ واشتدّت الحاجۃ إلی آدم الثانی



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 321

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 321

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/321/mode/1up


    فی آخر الزمان، لیتدارک ما فات فی أوّل الأوان، ولیتمّ وعید اللّٰہ فی الشیطان، فإن اللّٰہ جعلہ من المنظَرین إلی آخر الدنیا وأشار فیہ إلی إہلاکہ، وإخراجہ من أملاکہ، وما معنی الإنظار مِن غیر وعید القتل بعد أیام الإمہال وعیثِہ فی الدیار؟ وکان الإہلاک جزاء ہ بما أہلک الناس بالفتن الکبار. وکان الألف السابع لقتلہ أجلًا مسمّی، فإنہ أدخل الناس فی جہنّم من سبعۃ أبوابہا ووفّی حق العَمی، فالسابع لہذہ السبعۃ أنسب وأوفی. وکتب اللّٰہ أنہ یُقْتل فی آخر حصّۃ الدنیا، ویُحیٰی ہناک أبناء آدم رحمۃً من حضرۃ الکبریاء ، ویجعل علیہ ہزیمۃ عظمی کما جعل علی آدم فی الابتداء . فہناک تُجزَی النفس بالنفس والعِرض بالعرض، وتُشرِق الأرض بنور ربّہا، و تہوی عدوُّ صفیِّ اللّٰہ، وکذالک جزاء عداوۃ الأصفیاء . وکان ہذا الفتح حقًّا واجبا لآدم بما أذلّہ الشیطان، فی حلیۃ الثعبان، وألقاہ فی مغارۃ الہوان وہدّم بعدما أعزّہ اللّٰہ وأکرمَ. وما قصد إبلیس إلا قتلہ وإہلاکہ واستیصالہ، وأراد أن یعدمہ وذرّیتہ وآلہ، فکُتب علیہ حُکم القتل من دیوان قضاء الحضرۃ بعد أیام المہلۃ، وإلیہ أشار سبحانہ فی قولہ’’إِلَی یَوْمِ یُبْعَثُونَ‘‘کما یعلمہ المتدبّرون. وما عُنِیَ بہذا القول بعث الأموات، بل أُریدَ فیہ بعث الضالّین بعد الضلالات. ویؤیدہ قولہ تعالٰی فی القرآن’’3‘‘۱؂، کما لا یخفی علی أہل العقل والعرفان. فإن إظہار الدین علی أدیان أخری، لا یتحقق إلّا بالبیّنۃ الکبری، والحجج القاطعۃ العظمٰی، وکثرۃ أہل الصلاح والتقوٰی۔ولا شک أن الدین الذی یعطی الدلائل الموصلۃ إلی الیقین، ویزکّی النفوس حق التزکیۃ وینجّیہم من أیدی الشیطان اللعین ہو الدین الظاہر الغالب علی الأدیان، وہو الذی یبعث الأموات من قبور الشک والعصیان، ویحییہم عِلمًا وعملًا بفضل اللّٰہ المنّان وکان اللّٰہ قد قدّر أن دینہ لا یظہر بظہور تام علی الأدیان کلہا



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 322

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 322

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/322/mode/1up


    ولا یرزق أکثر القلوب دلائل الحق، ولا یعطی تقوی الباطن لأکثرہا إلا فی زمان المسیح الموعود والمہدی المعہود . وأمّا الأزمنۃ التی ہی قبلہ فلا تعمّ فیہا التقوی ولا الدرایۃ، بل یکثر الفسق والغوایۃ۔فالحاصل أن الہدایۃ الوسیعۃ العامّۃ، والحجج القاطعۃ التامّۃ، تختص بزمان المسیح الموعود من الحضرۃ، وعند ذالک الزمان تنکشف الحقائق المستترۃ، وتُکشَف عن ساق الحقیقۃ، وتہلک الملل الباطلۃ والمذاہب الکاذبۃ، ویملک الإسلام الشرق والغرب، ویدخل الحقُّ کل دارٍ إلّا قلیل من المجرمین، ویتمّ الأمر، ویضع اللّٰہ الحرب، وتقع الأَمَنۃُ علی الأرض، وتنْزل السکینۃ والصلح فی جذور القلوب، وتترک السباع سبعیّتَہا والأفاعی سُمّیّتَہا، وتتبیّن الرشد وتہلک الغیّ، ولا یبقی من الکفر والشرک إلا رسم قلیل، ولا یلتزم الفسقَ والفاحشۃ إلا قلبٌ علیل، ویُہدی الضالون، ویُبعث المقبورون۔فہذا ہو معنی قولہ’’إِلَی یَوْمِ یُبْعَثُونَ‘‘۔فإن ہذا البعث بعث ما رآہ الأوّلون ولا المرسلون السابقون ولا النبیون أجمعون. وإن دین اللّٰہ وإن کان غالبا من بدوأمرہ علی کل دین من حیث القوۃ والاستعداد، ولکن لم یتّفق لہ من قبل أن یباری الأدیانَ کلّہا بالحجۃ والإسناد، ویہزمہا کلَّ الہزم ویُثبِت أنہا مملوء ۃ من الفساد، ویخرج کالأبطال بأسلحۃ الاستدلال، حتی یعمّ فی جمیع الدیار والبلاد . وکان ذالک تقدیرا من اللّٰہ الودود، بما سبق منہ أن الغلبۃ التامۃ والصلاح الأکبر الأعم یختص بزمان المسیح الموعود۔ولذالک استمہل الشیطانُ إلی ہذا الزمان المسعود، فمہّلہ اللّٰہ لیتمّ کل ما أراد للعالمین. فأغوی الشیطان مَن تبِعہ أجمعین، فتقطّعوا بینہم أمرَہم، وکان کل حزب بما لدیہم فرحین. وما بقِی علی الصراط إلا عباد اللّٰہ الصالحین۔والسرّ فیہ أن الزمان قُسّم علی ستّۃ أقسام، مِن اللّٰہ الذی خلَق العالم فی ستۃ أیام فہو زمان الابتداء ، وزمان التزاید والنّماء ، وزمان الکمال والانتہاء، وزمان

    الانحطاط وقلّۃِ التعلّق باللّٰہ وقلّۃِ الارتباط، وزمان الموت بأنواع الضلالات



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 323

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 323

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/323/mode/1up


    وزمان البعث بعد الممات. فإنّ مَثل الناس عند اللہ مِن وقت آدم إلی آخر الزمان کزرعٍ أخرجَ شَطْأَہ فآزرَہ فاستغلظ فاستوی علی سوقہ، ثم اصفرّ فطفق تتساقط بإذن اللّٰہ، ثم حُصِد فبقیت الأرض خاویۃ، ثم أحیاہا اللہ بعد موتہا فإذا ہی راویۃ، وأنبتَ فیہا نباتًا مترعرعًا مخضرًّا، وعیونَ الزُرّاع أقرَّ، کذالک ضرب اللّٰہ مثلا للعالمین. فثبت من ہذا المقام أن زمان الموت الروحانی کان مقدَّرا من ربّ العالمین. وکان قُدّر أن الناس یضلّون کلہم فی الألف السادس إلّا قلیل من الصالحین، فلأجل ذالک قال الشیطان لَأُغوینّہم أجمعین، ولو لم یکن ہذا التقدیر لما اجترأ علی ہذا القول ذالک اللعین. ولمّا کان یعلم أن اللّٰہ قفّی ہذہ الأزمنۃَ بزمان البعث والہدایۃ والفہم والدرایۃ، قال’’إلٰی یَوْمِ یُبعَثون‘‘۔فالحاصل أن آخر الأزمنۃ زمان البعث کما یعلمہ العالمون. فکأنّ اللّٰہ قسّم الألوف الستّۃ علی الأزمنۃ الستّۃ، وأودعَ بعضَ حصص السابع للقیامۃ۔ولمّا جاء الألف السادس الذی ہو زمان البعث من اللّٰہ الکریم، تمّ أمرُ الإضلال وصار الناس فِرَقًا کثیرۃ من الشیطان اللئیم، وزاد الطغیان وتموّجَ الفِرق کتموّج الأمواج الثقال، وشمَخ الضلالۃ کالجبال، ومات الناس بموت الجہل والفسق والفواحش وعدم المبالاۃ، وعمّ الموتُ فی جمیع الأقوام والدیار والجہات. فہناک رأی اللّٰہ أن وقت البعث قد أتی، ووقت الموت بلغ إلی المنتہٰی، فأرسل رسولہ کما جرت سُنّتہ فی قرون أولی، لیحیي الموتٰی، وکان وعدًا مفعولًا من ربّ الوَری. فذالک ہو المسیح خاتم الخلفاء ، ووارث الأنبیاء ، والإمام المنتظر من حضرۃ الکبریاء ، وآدم الذی بدَأ اللّٰہ منہ مرۃً ثانیۃ سلسلۃَ الإحیاء۔وإن اللّٰہ سمّاہ "أحمد" بما یُحمَد بہ الربّ الجلیل فی الأرض کما یُحمَد فی السّماء . وسمّاہ "عیسی ابن مریم" بما خلق روحانیتہ من لدنہ، وما کان علی الأرض شیخ لہ کالآباء۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 324

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 324

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/324/mode/1up


    وأعطی لہ لقب عیسی الذی ہو المسیح بما ختَم علیہ خلافۃ نبیِّ الأمم خیرِ الأصفیاء ، کما خُتم علی عیسٰی خلافۃ سلسلۃ موسٰی من حضرۃ الکبریاء ، وبما قدّر أن اسمہ یمسَح الأرض ویُذکَر فی کل قوم بالعزّۃ والعلاء ، ویبدو کالبرق من جہۃ ثم یبرق فی جہات أخری وینیر کل فضاء السّماء ، وبما کتب من الأزل أنہ یمسح السماء بکشف الحقائق فلا تبقٰی فی زمنہ نکتۃ فی حیّز الاختفاء۔فہذہ ثلا۔ثۃ أوجہ لتسمیۃ المسیح الذی ہو خاتم الخلفاء ، ففکّرْ فیہ إن کنت من أہل الدہاء . وإنہ مستفیض من نبیّہ الذی ملَک ہذہ الصفات الثلاث بالاستیفاء ، فاترکْ ذکر عیسٰی وآمنْ بظِلِّ خیرِ الرسل وخاتم الأنبیاء وکان من أہم الأمور عند اللّٰہ أن یجعل آخر الأزمنۃ زمانَ البعث۔أعنی زمان تجدید سلسلۃ الإحیاء ، وإنہ الحقّ فلا تجادل کالجہلاء۔وکذالک کان من أعظم مقاصد اللّہ أن یُہلک الشیطان کل الإہلاک، ویردّ الکَرّۃَ لآدم ویملأ الأرض قِسْطًا وعدلا ومن أنواع البرکات والآلاء ، ویکشف الحقائق کلہا ویُشیع الأمر والمأمور فی جمیع الأنحاء ، ویُظہر فی الأرض جلالہ وجمالہ ولا یغادر فی ہذا الباب شیئا من الأشیاء. فأقام عبدًا من عندہ لہٰذا الغرض ولتجدید الشریعۃ الغرّاء ، وجعلہ من حیث الآباء من أبناء فارس ومن حیث الأمہات من بنی فاطمۃ، لیجمع فیہ الجلال والجمال، ویجعل فیہ نصیبا من أحسن سجایا الرجال، ونصیبا من أجمل شمائل النساء ، فإن فی بنی فارس شجعانا یردّون الإیمان من السّماء ، ولذالک سمّانی اللّٰہ آدمَ والمسیحَ الذی أری خَلْقَ مریمَ، وأحمدَ الذی فی الفضل تقدّمَ، لیُظہر أنہ جمَع فی نفسی کل شأن النبیین علی سبیل الموہبۃ والعطاء ، فہذا ہو الحق الذی فیہ یختلفون. لا یعود إلی الدنیا آدم، ولا نبینا الأکرم، ولا عیسی المتوفی المتّہم. سبحان اللّٰہ وتعالی عما یفترون!ألیس ہذا الزمان آخر الأزمنۃ ما لکم لا تفکّرون؟ أما اقتربت الساعۃ بظہور نبیّنا وجاء ت أشراطہا فأین تفرّون؟ ما لکم تَدُعُّون الأخبار مِن مقرِّ أوقاتہا وتؤخّرونہا وأنتم تعلمون؟ أنسیتم حدیث: "بُعثتُ أنا والساعۃ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 325

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 325

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/325/mode/1up


    کہاتین"، فما لکم لِمَ تکفُرون؟ فامسَحوا السبّابۃ وما لحِقہا، وتَذکّروا وعد اللّٰہ، وما یتذکّر إلا الذین یُنیبون۔وما جئتُ إلا فی الألف السادس الذی ہو یومُ خلق آدم، وإن فیہا لہدی لقوم یتفکّرون. ألا تقرء ون سورۃ العصر وقد بیّن فی أعدادہا عمر الدنیا من آدم إلی نبیّنا لقوم یتفقّہون. وہذا ہو العمر الذی یعلمہ أہل الکتاب، فاسألوہم إن کنتم لا تعلمون. ولا فرق بین عِدّۃ سورۃ العصر وعِدّتہم إلّا الفرق بین أیام الشمس وأیام القمر، فعُدّوہا إن کنتم تشکّون. وإذا تقرّرَ ہذا فاعلموا أنی وُلدتُ

    فی آخر الألف السادس بہذا الحساب، وإنہ یومُ خلق آدم، وإن یوما

    عند ربنا کألف سنۃ مما تعدّون۔وإن کنتم فی ریب مما کتبنا من أنہ

    من أیام سلسلۃ آدم ما بقِی إلٰی یومنا ہذا إلّا ألفُ سنۃ أو معہ قلیل

    من سنین، فتعالوا نُثبِتہ لکم من کتاب اللّٰہ ومن الحدیث ومن کتب

    النبیّین السابقین. فإن أعداد سورۃ العصر بحساب الجُمل، کما کُشِفَ علیّ من اللّٰہ الوہّاب وکما ہو متواتر عند أہل الکتاب، یہدی إلی

    أن الزمان إلی عہد خاتم الأنبیاء کان مُنقضیًا إلی خمسۃ آلاف من آدمَ أوّلِ النبیّین. وما کان باقیا من الخامس إلا قلیل من مئین*۔وکمِثلہ یُفہَم مِن حدیث مِنبر ذی سبع درجات بمعنی بیّنّاہ فی موضعہ للناظرین۔ولمّا ثبت أن ہذا القدر من عمر الدنیا کان مُنقضیا إلی عہد رسول اللّٰہ خیرِ الورٰی، ثبت معہ أن القدر الباقی ما کان إلا أقلّ مقدارا نسبۃً إلی ما مضی۔فإن القرآن الکریم صرّح مرارا بأن الساعۃ قریبۃ لا ریب

    ان الاقوال التی تخالف ھٰذہ العدۃ وذکرھاالمتقدمون۔ فھی کلمات تکذب بعضھا بعضًا ومااتفقواعلی کلمۃ واحدۃ بل انھم فی کل وادٍیھیمون۔فلیس بحری ان یتمسک بھابعدمااتفق علی ھٰذہ العدۃ القراٰن و النبیون الاوّلون۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 326

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 326

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/326/mode/1up


    فیہا وقال’’3‘‘۱؂ وقال’’3‘‘۲؂وقال’’3 3‘‘۳؂ وکذالک توجد فیہ فی ہذا الباب آیات أخرٰی، فعُلِمَ منہا بالقطع والیقین یا أولی النہی، أن الحصّۃ الباقیۃ من الدنیا أقلّ من زمان انقضی، حتی إن أشراط الساعۃ ظہرتْ ویوم الوعد دنٰی، وقرُب الآتی وبَعُدَ ما مضی، فارجع البصر ہل تری من کذب فیہ، والسّلام علی من اتّبع الہُدی۔وقد علمتَ أن المدّۃ المنقضیۃ من وقت آدم إلٰی عہد نبیّنا المصطفٰی، کانت قریبۃ من خمسۃ آلاف، وقد شہد علیہ القرآن واتفق علیہ أہل الکتاب من غیر خلاف، فما المقدار الذی ہو أقلّ من ہذا المقدار؟ ألیس ہو آخر وقت العصر، أجِبْنا بالإنصاف؟ ولو تعسّفتَ کلّ التعسّف ثم مع ذالک لا بُدّ لک أن تُقرّ بأنہ أقلّ من النصف بغیر الاختلاف. فقد اعترفتَ بدعوانا بقولک ہذا مع ہذا الاعتساف. فلزم لک أن تُقرّ أن مِن مُدّۃ عہدِ آدم ما کانت باقیۃ إلی عہد رسول اللّٰہ إلا ألفین وعِدّۃً من مئین، وہذا ہو دعوانا فالحمد للّٰہ ربّ العالمین. فإنا نقول إنا بُعثنا علی رأس ألفٍ آخِر من ألوف سلسلۃ أبی البشر* وخاتمۃ الألف السادس بإذن اللّٰہ أرحم الراحمین. وہٰذا ہو زمان المسیح

    الذی ہو آدمُ آخِرِ الزمان، وہذہ ہی حُجّتی التی أقررتَ بہا

    یا أبا العدوان۔ فانظرْ أنک صُفّدتَ حق التصفید وکذالک یصفَّد

    کلّ مَن أعرض عن أہل العرفان وَاللّٰہ ما نبّأَنا بالساعۃ، ونبّأَنا بالألف

    الذی تقع الساعۃ فیہا، وعرّف بعضَ الحالات وأعرضَ عن بعض

    اناانتقلنافی بعض عبارات کتابناھٰذامن تصریح لفظ خاتمۃ الدنیاالی لفظ انقلاب عظیم او انقطاع سلسلۃ اٰدم اوعبارۃٍ اخریٰ۔فان امرالساعۃ خفیّ لایعلم تفصیلہ الااللّٰہ فالکنایۃ اقرب الی التقویٰ۔ونؤمن بانقلاب عظیم بعد ھٰذہ المدّۃ ونفوّض التفاصیل الی ربّنا الاعلٰی۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 327

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 327

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/327/mode/1up


    فلا نعلم وقت الساعۃ ولا مَلَکٌ فی السماء ، وما نعلم حقیقۃ الساعۃ، ونعلم أنہا انقلاب عظیم ویوم الجزاء ، ونفوّض تفاصیلہا إلی علیم یعلم حقیقۃ الابتداء والانتہاء۔ثم نعید الکلام ونقول إن اللّٰہ شبّہ زمان رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم بوقت العصر، وإن شئت فاقرأْ فی القرآن سورۃ العصر، وکذالک جاء ذکرُ العصر فی الأحادیث الصحیحۃ والأخبار الموثّقۃ المتواترۃ، حتّی إنہ توجد فی البخاری والموطّأ وغیرہا من الکتب المعتبرۃ. والسرّ فی ہذا التشبیہ أن اللّٰہ بَعث موسٰی بعد إہلاک القرون الأولی، وجعَلہ آدمَ للأمّۃ الجدیدۃ وأوحیٰ إلیہ ما أوحیٰ، وانقطع سلسلۃُ دینہ إلی ثلاث ماءۃ بعد الألف ونیفٍ وکذالک أراد اللّٰہ وقضٰی. ثم بعث عیسٰی لیذکِّر بنی إسرائیل ما نسوہ من التوراۃ ویرغّبہم فی أخلاق عظمٰی، وانقطعت سلسلۃ دینہ إلی مدّۃ ہی قریب من نصف مدّۃ سلسلۃ موسٰی. ثم بعَث نبیَّہ محمّدًا خیرَ الورٰی ورسولہ المصطفٰی، علیہ صلوات اللّٰہ وسلامہ وبرکاتہ الکبرٰی، وجعَل سلسلۃ الأخیار الذین اتّبعوہ إلی مدّۃ ہی نصفُ النصف الذی أُعطیَ لعیسٰی، أعنی القرون الثلاثۃ التی انقرضت إلی ثلاث ماءۃ من سیّدنا المجتبٰی. فکان عہدُ أُمّۃ موسٰی یضاہی نہارًا کاملًا تمامًا، ویضاہی عددُ مِئاتِہ عددَ ساعاتِہ، وعہدُ أُمّۃ عیسٰی یضاہی نصفَ النہار فی حدّ ذاتہ، وأمّا عہد أخیارِ أُمّۃ خیرِ الرسل الذین کانوا إلی القرون الثلا۔ثۃ فہو یضاہی نصفَ نصف النہار أعنی وقت العصر الذی ہو ثلاث ساعۃ من الأیام المتوسطۃ. ثم بعد ذالک لیلۃ لیلاء بقدرٍ من اللّٰہ وحکمۃٍ، وہی مملوء ۃ من الظلم والجور إلی ألف سنۃ. ثم بعد ذالک تطلُع شمس المسیح الموعود من فضل الرحمٰن، فہذا معنی العصر الذی جاء فی القرآن. ہذا ما ظہر علینا من حقیقۃ وقت العصر، ولکن مع ذالک قُرْب القیامۃ حقٌّ صحیح ثابت من الفرقان. وللقرآن وجوہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 328

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 328

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/328/mode/1up


    عند أہل العرفان، فہذا وجہ وذٰلک وجہ وکلاہما صادقان عند الإمعان، ولا ینکرہ إلا جاہل ضریر أو متعصّب أسیر فی حُجب العدوان، لأن المعنی الذی قدّمناہ فی البیان یحصُل بہ التفصّی من بعض الإشکال التی تختلج فی جَنان بعضِ عطاشی العرفان، مِن تتابُعِ وساوس الشیطان. ثم إن ہذا المعنی ینجی حدیث البخاری والموطّأ من طعنِ الطعّان، ومن اعتراض معترض یتقلّد أسلحۃ لِلطَّعْنان۔وتقریر الاعتراض أنہ کیف یمکن أن یشبہ زمان الإسلام بوقت العصر وقد ساوی زمانُ ہذا الدین زمانَ موسٰی، وزاد علی زمان دین عیسٰی، بل جاوزَ ضعفُہ إلی ہذا العصر، فما معنی العصر نسبۃً إلی الزمان المذکور؟ بل لیس ہذا البیان إلا کذبا فاحشا ومِن أشنع أنواع الزور، بل ذیلُ الاعتراض أطولُ من ہذا المحذور.. فإن نبأ نزول عیسٰی وخروج الدجّال ویأجوج ومأجوج الذی ینتظرہ کثیر من العامّۃ قد ثبَت کذبہ بہذا الإیراد بالبداہۃ وبالضرورۃ، فإن وقت العصر قد مضی بل انقضی ضِعفاہ من غیر الشک و

    الشبہۃ نظرًا إلی زمان الملّۃ الموسویۃ، فما بقی لظہور ہذہ الأنباء

    وقت، واضطر المنتظرون إلی أن یقولوا إنہا باطلۃ فی الحقیقۃ. و

    ما بقی سبیل لتصدیقہا إلّا أن یقال إن ہذہ الأخبار قد وقعت، وقد

    نزل عیسی النازل، وخرج الدجّال الخارج، وظہر یأجوج ومأجوج، وتحقّقَ النسل والعروج، وتمّت الأخبار التی قُدّرتْ،والرسل أُقّتتْ۔

    فلمّا قلنا إن زمان أمّۃ موسٰی کان بین ہذہ الأمم الثلاث أطولَ الأزمنۃ، وکان زمانُ أمّۃ عیسٰی نصفَہ، وکان نصفَ ہذا النصف زمانُ أخیار

    ہذہ الأُمّۃ نظرًا إلی تحدید القرون الثلا۔ثۃ، بطُل ہذا الاعتراض، وانکشفَ الأمر علی الذی یطلب الحق بسلامۃ الطویّۃ وصحۃ

    النیّۃ، وثبت بالقطع والیقین أن زمان الأمّۃ المرحومۃ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 329

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 329

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/329/mode/1up


    المحمدیۃ قلیل فی الحقیقۃ من زمان الأمّۃ الموسویۃ والعیسویۃ*. وہذہ منّۃٌ منّا علی المخالفین من الفِرق الإسلامیۃ، ولم یبق لعاقل ارتیاب فی ہذا البیان، بل ہو موجب لثلج الصدر والاطمئنان، وبطُل معہ اعتراض یرِد علی حدیث عمر الأنبیاء ، فإن عمرَ عیسٰی من جہۃِ بقاءِ دینہ نصفُ عمر موسٰی کما ظہر مِن غیر الخفاء ، وعمرَ سیدِنا خیر الرسل بالنظر إلی القرون الثلا۔ثۃ نصفُ عمر عیسی ابن مریم بالبداہۃ. ثم بعد ذٰلک أیامُ موت الإسلام إلی ألف سنۃ. ثم بعد موت رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم بہذا المعنی زمانُ المسیح الموعود، الذی یشابہ أبا بکر فی قتل الشیطان المردود، فإن المسیح الموعود قد استُخلفَ بعد موت النبیّ الکریم مِن حیث دینہ، مِن غیر فاصلۃ قبل تدفینہ، وأَشرکہ ربُّہ فی نبأ خلافۃِ أبی بکر۔أعنی النبأ الذی ذُکر فی صحف مطہَّرۃ، ووُفّق کما وُفّق أبو بکر، وأُعطیَ لہ العزمُ کمِثلہ لمنع

    قدصرح رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ وسلم بان المراد من الامم الذین خلوا من قبلھم الیھود و النصارٰی۔فلا سبیل لمن ماریٰ۔اماسمعت قول رسول اللّٰہ’’ فمن‘‘ ففکر و امعن۔ثم نقول علی سبیل التنزل ان وقت بعث نبیناالمصطفیٰ۔ماکان الاکالعصرنسبۃ اِلی امم اخریٰ۔فان نسبۃ الالف الخامس الی عمرالدنیا۔اعنی سبعۃالافٍ۔تضاھی نسبۃ توجدلوقت العصربمامضی بغیرخلافٍ۔وذالک اذااُخذ۔مقدارالنھار سبع ساعات۔نظرًاالی اقل مقدارطلوع الشمس وغروبھا فی بعض معمورات۔وانت تعلم ان النھاریوجد بہذاالقدر فی بعض بلاد القصویٰ۔کما لایخفیٰ علی اولی النھیٰ۔وانا اخذنا النھار فی صورۃ اولٰی بلحاظ ازید ساعاتھا و فی الاخریٰ بلحاظ اقلھا و لنا الخیرۃ کما تریٰ۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 330

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 330

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/330/mode/1up


    سیل ضلالۃ مہلکۃ. وإلیہ أشارسبحانہ تعالٰی فی قولہ’’33 3‘‘۱؂ یعنی مِن ألف سنۃ، وکثُرت الاستعارات کمثلہ فی کتب سابقۃ. ثم بعد ذالک الألف زمانُ البعث بعد الموت وزمان المسیح الموعود، فقد تمّ الیوم ألفُ الضلالۃ والموت، وجاء وقت بعد الإسلام الموء ود. وتمّتْ حجّۃ اللّٰہ علیکم أیہا المنکرون، فلا تکونوا من الظانّین باللّٰہ ظنّ السوء ، و عُدّوا أیّام اللّٰہ أیہا العادّون. وإنّ وعد اللّٰہ حق، فلا تغرّنکم الحیاۃ الدنیا، ولا یغرّنکم الشیطان الملعون۔وإن ہذہ الأیّام أیّامُ ملحمۃ عظمٰی أیہا المجاہدون الخاطؤن، وأیّامُ نزول المسیح وخروج الشیطان بغضب ما رآہ السابقون. فإن الشیطان رأی الزمان قد انقضی، وإن وقت المُہلۃ مضٰی، ویوم البعث أتٰی، وما کانت المہلۃ إلّا إلٰی یومِ یُبعَثون. ہذا ما وعد الرحمٰن وصدق المرسلون. و إن الذین یجادلون فیہ بعدما أتتہم شہادۃ من الفرقان إنْ فی صدورہم إلا کبرٌ، وما بقی لہم حق لیکفروا بسلطان نزل من الرحمٰن، وتمّت علیہم حجّۃ اللّٰہ الدیّان.لا یریدون الحق ولا الہدیٰ، وینفدون الأعمار فرحین مستبشرین بہذہ الدنیا. ألم یأتہم ما أتی الأمم الأولٰی؟ ألم یروا آیات کبرٰی؟ أما جاء رأس الماءۃ وفسادُ الأمّۃ، والفتنُ العظمٰی من أعداء الملّۃ، والکسوفُ والخسوف فی رمضان ومعالم أخرٰی؟ فإن کنتم صالحین فأین التقوٰی؟

    أیہا الناس!قد علمتم مما ذکرنا من قبل أن أعداد سورۃ العصر بحساب الجُمّلِ تدلّ علی أن الزمان الماضی من وقت آدم إلی نزول ہذہ السورۃ کان سبع ماءۃ سنۃ بعد أربع آلاف. ہذا ما کشَف علیّ ربی فعلمتُ بعد انکشاف، وشہد علیہ تاریخ اتفق علیہ جمہور أہل الکتاب من غیر خلاف، وقد زاد علی تلک المدّۃ إلی یومنا ہٰذا ثلاث ماءۃ بعد الألف، وإذا جَمعناہُمَا فہو ستۃ آلاف کما ہو مذہب المحقِّقین من السلف۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 331

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 331

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/331/mode/1up


    ومن ہٰہنا ثبت أن تولُّدی فی آخر الألف السادس یضاہی خلقۃَ آدم فی الیوم السادس. ولا شک أن المبعوث فی آخر ألفِ الموت سُمّی بآدم عند الرحمٰن، فکان من أسرار حکمۃِ اللّٰہ أنہ خلقنی فی آخر الألف السادس لیشابہ خَلْقی خَلْقَ آدم بہذا العنوان. وکان ہذا وعدًا مقدَّرًا من اللّٰہ ذی الحِکم والفنون، وإلیہ أشار فی قولہ’’33‘‘۱؂۔وإن زمان خَلقی ألفٌ سادس لا ریب فیہ، فاسأل الذین یعلمون. ونطق بہ التوراۃُ التی یؤمن بہا المسلمون، ولم یثبت بنصوص صریحۃ ما یخالف ہذہ العِدّۃَ ویعلمہ العالمون. فما کان لہم أن یکفروا بعِدّۃ التوراۃ وما قال النبیّون. وکیف وما خالفہ القرآن بل صدّقہ سورۃ العصر فأین یفرّون؟ بل إلیہ یشیر قولہ تعالی’’3 333‘‘ ۲؂ * واقرؤوا معہا آیۃ ’’33‘‘۳؂۔ہذہ آیۃ کتبناہا من سورۃ

    السجدۃ، ومن السُنّۃ أنہا تُقرَأ فی صلٰوۃ الفجر من الجمعۃ، وإن اللّٰہ تبارک وتعالٰی یقول فی ہذہ السورۃ إنہ دبّر أمر الشریعۃ بإنزال الفرقان الحمید، وأکملَ للنّاس دینہم بالکلام المجید، ثم یأتی بعد ذالک

    قدصرح اللّہ تعالٰی فی ہذہ الاٰیۃ۔و بیّن حق التبیین ان ایام الضلالۃ بعدایام دعوۃ القراٰن ھی الف سنۃ۔وبعدھایبعث مسیح الرحمٰن فانقطعت الخصومۃ بھذاالتعیین المبین لاسیمااذاالحق بہ ماجاء ذکرالف سنۃ فی کتب النبیین السابقین۔ففکرثم فکرحتّی یأتیک الیقین۔الا۔تری الذین فتنوا المؤمنین والمؤمنات۔الحقوا بجماعتھم کثیرًا من الحشرات۔ وقلبوا العالم بالبدعات۔وارادوا ان یستأصلواالحق بالخزعبیلات۔ وانفقواجبال الطلاء کاجراء نھر الماء۔لھدم الشریعۃ الغراء۔ایوجدمثلھم فی الاولین من الاعداء۔اوصُبّت علی الاسلام مصیبۃ من قبل کمثل ھذاالبلاء۔ لن تجد من اٰدم الٰی اٰخرالوقت فتنًاکفتن ھولاء۔منہ



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 332

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 332

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/332/mode/1up


    زمان تمتدّ ضلالتہ إلی ألف سنۃ، ویُرفَع کتاب اللّٰہ إلیہ ویعرُج إلی اللّٰہ أمرہ بِشِقَّیہ، یعنی یُضاع فیہ حقُّ اللّٰہ وحق العباد، وتہبّ صراصر الفساد علی قِسمَیہ، ویفشو الکذب والفِریۃ، یعنی الفتن الدجّالیۃ، ویظہر الفسق والکفر والشرک، وتری المجرمین معرضین عن ربہم وظہیرین علیہ. ثم یأتی بعد ذالک ألف آخر یُغاث فیہ الناس من ربّ العالمین، ویُرسَل آدمُ آخرِ الزمان لیجدّد الدین، وإلیہ أشار فی آیۃٍ ہی بعد ہذہ الآیۃ أعنی قولہ’’33‘‘۱؂۔وإنّ ہذا الإنسان ہو المسیح الموعود وقُدّر بعثہ بعد انقضاء ألف سنۃ من القرون التی ہی خیر القرون، واتّفق علیہ معشر النبیین۔وقد جاء فی الصحیحین عن عمران بن حصین قال قال رسول صلی اللّہ علیہ وسلم خیرُ أمّتی قرنی ثم الذین یلونہم، ثم الذین یلونہم، ثم إن بعدہم قوم یشہدون ولا یُستشہدون، ویخونون ولا یُؤتمَنون، وینذِرون ولا یُوفون، ویظہَر فیہم السِّمَن. وفی روایۃ: ویحلِفون ولا یُستحلفون. فظہر من ہذا الحدیث الذی ہو المتفق علیہ أن الزمانَ المحفوظ من غلبۃ الکذب الذی ہو من الصفات الدجّالیۃ وزمانَ الصدق والصلاح والعفّۃ لا یجاوز ثلاث ماءۃ من قرن سیدنا خیر البریّۃ، ثم بعد ذالک یأتی زمان کَلَیلٍ سَجٰی عند غیبۃ بدرٍ اختفٰی، وفیہ یفشو الکذب ویہوی من الأہواء مَن ہَوَی، ویزید کلَّ یوم زُورٌ وأحادیث تُفتَری۔فإذا بلغ الکذب إلی حدّ الکمال فینتہی یومًا إلی ظہور الدجّال، وہو آخِرُ أیام ہذا الألف کما یقتضیہ سلسلۃُ الترقی فی الزُور والافتعال، وکما ہو مفہوم حدیث رسول اللّٰہ ذی الجلال۔وذالک الزمان ہو الزمان الذی یعرُج أمرُ اللّٰہ إلیہ والہدیٰ، ویُرفَع القرآن إلی السماوات العُلٰی، وقد



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 333

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 333

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/333/mode/1up


    شہدت الواقعات الخارجیۃ أن ہذا الزمان الفاسد امتد إلی ألف سنۃ.. أعنی إلی ہذا الزمان، حتی صار الصِلُّ کَالْأُفْعُوَان. فَفَہِمْنَا من ہذا بالیقین التام والعرفان، أن قولہ تعالٰی’’یَعْرُجُ إِلَیْہِ فیِ یَوْمٍ کَانَ مِقْدَارُہُ أَلْفَ سَنَۃٍ مِمَّا تَعُدُّونَ۱؂ ‘‘، یتعلّق بہذہ المدّۃ التی مرّت فی الضلالۃ والفسق والطغیان، وکثُر فیہ المشرکون، إلا قلیل من الذین کانوا یتّقون. وإنہ ألف سنۃ ما زاد علیہ وما نقص، فأی دلیل أکبر من ہذا لو کنتم تفکّرون۔وإن لم تقبَلوا فبیِّنوا لنا ما معنی ہذہ الآیۃ من دون ہذا المعنی إن کنتم تعلمون. أتظنون أن القیامۃ ہی ألف سنۃ کسنواتِ مُدّۃِ الدنیا أو تصعَد الأعمال إلی اللّٰہ فی یوم القیامۃ فی مدّۃٍ کمثلہا، ولا یعلَمہا اللّٰہ قبلَہا؟ اتّقوا اللّٰہ أیہا المسرفون!وأی شہادۃ أکبر مما ظہر فی الخارج۔أعنی مقدار مدّۃٍ غلبت الضلالۃ فیہا، فإنکم رأیتم بأعینکم أن مدّۃ زمان الضلالۃ وشدّتہا وتزایُدہا بعد قرون الخیر قد امتدّتْ إلٰی ألف سنۃ حقا وصدقا۔أتنکرون وأنتم تشاہدون؟ وبدأ الکذب کزرع، ثم صار کشجرۃ، حتی ظہرت ہیکل الدجّال وأنتم تنظرون. وإن الضلالۃ وإن کانت من قبل ولکن ما حدّتْ قرونُہا إلّا بعد ہذہ القرون الثلاثۃ. ألا تقرء ون حدیث القرون؟ وقد جمع ہذا الألف کلَّ ضلالۃ، وأنواعَ شرک وبدعۃ، وأقسام فسق ومعصیۃ، وأُضیعَ فیہ حقوق اللّٰہ وحقوق العباد وحقوق المخلوق، وانفتحت أبواب الارتداد، فبأی دلیل بعد ذالک تؤمنون؟ وفُتحتْ یأجوج ومأجوج، وترون أنہم من کل حدَبٍ ینسلون. وما خرَجَا إلّا بعد القرون الثلا۔ثۃ، وما کمُل إقبالہما إلّا عند آخر حصۃِ ہذا الألف، وکُمّلَ الألف مع تکمیل سطوتہما، وإن فیہا لآیۃ لقوم یتدبّرون، وإنّ القرآن یہدی لہٰذا السرّ المکتوم۔



    Ruhani Khazain Volume 16. Page: 334

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۶- خُطبۃً اِلھَامِیَّۃً: صفحہ 334

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=16#page/334/mode/1up


    ویقول إن یأجوج ومأجوج قد حُبِسا وصُفّدا إلی یوم الوقت المعلوم، ثم یُفتَحان فی أیام غروب شمس الصلاح وزمان الضلالات، کما أنتم ترون فی ہذہ الأیام وتشاہدون.وکفی الطالبین ہذا القدر من البیان، وأری أنّی أکملتُ ما أردت وأتممت الحجّۃ علی أہل العدوان. وہذا آخر ما أردنا، فالحمد للّٰہ علی إتمامہ لطلباء الزمان.

    المؤلّف

    میرزا غلام احمد

    ۱۷ / اکتوبر سنۃ ۱۹۰۲ء
     

اس صفحے کو مشتہر کریں