1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 15 ۔روئداد جلسہ دعا ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏ستمبر 4, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 593

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 593

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 594

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 594

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ

    594


    نَحمدُہٗ وَ نُصَلِّیْ عَلٰی رَسُوْلِہِ الکَرِیْم

    روئیداد جلسہِء دعاء

    جوحضرت میرزا غلام احمد صاحب مسیح موعود کی

    تحریک پر دار الامان قادیان میں بتاریخ

    ۲ ؍ فروری ۱۹۰۰ء منعقد

    ہوا

    پیشتر اس کے کہ ہم اس روئیداد کو ناظرین کے سامنے پیش کریں اوّل اس امر کا جتلا دینا ضروری سمجھتے ہیں کہ جناب امام المتقین حجۃ اللّٰہ برزمین حضرت اقدس مرزا غلام احمد صاحب رئیس قادیان مسیح زمان علیہ الصلٰوۃ والسلام جس طرح عام مخلوقات کے خیر خواہ ہیں اسی طرح وہ گورنمنٹ وقت کے سچے دِل سے وفادار اور خیرخوا ہ ہیں۔ یہ انہیں کی ذات مبارک ہے جس نے حقوق رعایا و



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 595

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 595

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ

    595

    حقوؔ ق گورنمنٹ کو روزِ روشن کی طرح کھول کر دِکھا دیا اور اپنی جماعت کے دِلوں میں اس محسن گورنمنٹ کے احسانات کو ایسے مؤثر اور گوناگوں پیرایوں میں کوٹ کوٹ کر بھر دیا جس سے اس سلطنت کے ساتھ منافقانہ رنگ کا دھبہ اس پاک جماعت کے دِلوں سے ایسایک لخت اُڑ گیا کہ اس کا نام و نشان تک نہ رہا یہ وہی رنگ تھا جو معصّب اور جاہل مُلاؤں کی صحبت سے بیچارے سادہ دِل او رنادان مسلمانوں کے رگ و ریشہ میں چڑھتا جاتا ہے۔اوروہ اسی طرح صدق دِل سے گورنمنٹ برطانیہ کے وفادار اور نمک حلال ہوگئے ہیں جس طرح کسی اسلامی حکومت کے ہونے چاہیئے تھے۔

    یہ بات خود گورنمنٹ پر بھی مخفی نہیں کہ جناب موصوف کا خاندان ہمیشہ سے اس گورنمنٹ کا وفادار اور جاں نثار رہا ہے اور ہر آڑے وقت پر اپنی حیثیت سے بڑھ کر خدمات بجا لاتا رہا ہے جس سے حکام گورنمنٹ خود نتیجہ نکال سکتے ہیں کہ جناب مرزا صاحب کے خاندان کو پہلے ہی سے اس گورنمنٹ سے تعلقاتِ یگانگت حاصل ہیں گو حضرت موصوف کے بزرگ سپاہ اور سواروں سے مدد فرماتے تھے تاہم یہ اپنے رنگ میں پرسوز دُعاؤں کے لشکر سے امداد دینے میں فروگذاشت نہیں کرتے۔ چنانچہ جب کبھی سرحد افغانستان یا بلوچستان یا برہما میں جنگ اور لڑائی پیش آئی تویہ دعا کرتے رہے۔ حضرت ملکہ معظمہ قیصرہ کی جو بلی پر بڑی خوشی منائی اور جلسہ منعقد کرکے ان کی طول عمر اور اقبال کی دعا جناب الٰہی میں کی اور وہ اپنی اس طرز زندگی میں جو محض فقیرانہ زندگی ہے اور ہمیشہ سے گوشہ گزینی اور خلوت نشینی ان کی عادت ہو رہی ہے بجز دعا کے اور کس طرح اپنی محسن اور مہربان گورنمنٹ کی مدد کرسکتے ہیں۔ لہٰذا اس موقع پر بھی جبکہ سرکاربرطانیہ کو ایک ایسی قوم سے جس کو در پردہ اور قومیں مدد دے رہی ہیں جس سے ہماری گورنمنٹ کو ناحق تکلیف پہنچ رہی ہے اس ہمدرد خلائق نے مناسب سمجھا کہ فتحیابی کے لئے دعا کی جائے چنانچہ یکم فروری کو



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 596

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 596

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ

    596

    حضرؔ ت اقدس موصوف نے اپنی جماعت کے لوگوں کو جو افغانستان۔ عراق۔ہندوستان کے مختلف بلاد مثلاً مدراس۔ کشمیر۔ شاہجہاں پور۔ جموں۔ متھرا۔جھنگ۔ ملتان۔ پٹیالہ۔ کپورتھلہ۔ مالیرکوٹلہ۔ لدھیانہ۔شاہ پور۔ سیالکوٹ۔ گجرات۔ لاہور۔ امرتسر۔ گورداسپور وغیرہ اضلاع سے آئے ہوئے تھے ارشاد فرمایاکہ ہم چاہتے ہیں کہ عید کے روز سرکار برطانیہ کی کامیابی کے لئے دعا کی جائے جس کو سب نے سن کر خندہ پیشانی سے پسند کیا۔

    بنابریں عید کے روز قریب ۸ بجے کے حضرت مسیح علیہ السلام مع اپنی جماعت کے اس وسیع میدان میں جو قصبہ قادیان کی جانب مغرب ہے اور جو قدیمی عیدگاہ ہے تشریف لے گئے اور نو ۹ بجے تک دور و نزدیک کے دیہات کے لوگ بھی وہاں جمع ہوتے رہے۔ پھر علامۃ الدھر وحید العصر حضرت مولانا مولوی نور الدین صاحب نے نماز عید الفطر پڑھائی اور بعد فراغت نماز عالی جناب حضرت امام الزّمان نے کھڑے ہوکر خطبہنہایت فصاحت و بلاغت سے پڑھا اور تقریر اِس قدر پر تاثیر تھی کہ تمام لوگ جو تعداد میں ہزارسے کم نہ تھے ہمہ تن گوش ہو رہے تھے اور اِس قدر واضح اور عام فہم تھی کہ دیہاتی آدمی بھی جو مویشیوں کی طرح زندگی بسر کرتے ہیں متاثر ہوکر بول اُٹھے۔ حضرت اقدس سب سچ کہہ رہے ہیں۔ اس تقریر میں جیسے کہ اصل تقریر سے واضح ہوگا اللہ تعالیٰ کے ساتھ ساتھ حکام مجازی کے حقوق کا کس قدر فوٹو کھینچا گیا ہے اور کس طرح رعایا کو بتلایا گیا ہے کہ اس گورنمنٹ برطانیہ کے کس قدر احسانات ہم مسلمانوں پر ہیں اور ہم مسلمان اپنے قرآن کی رُو سے کس حد تک گورنمنٹ کی وفاداری اور جاں نثاری کے لئے پابند کئے گئے ہیں۔ کیا کوئی دنیا میں ہے کہ اِس طرح پر از رُوئے مذہب گورنمنٹ برطانیہ کے حقوق صدق دلی اور نیک نیتّی سے ثابت کر سکے یہ اسی جوانمرد کا کام ہے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 597

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 597

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ

    597

    کہ ؔ جس نے اپنی جماعت کے دِلوں میں گورنمنٹ کی نسبت سچی محبت بٹھا دی ہے اور بارہا اپنی جماعت کو تحریراً و تقریراً بتاکیدفرمایا ہے کہ اگر تم میں سے کوئی ایک رائی کے دانہ کے برابر بھی اپنی گورنمنٹ سے منافقانہ روش اختیار کرے گا وہ ہماری جماعت میں شمار نہیں ہوگا اور وہ خدا اور رسول کا نافرمان ہوگا۔ کیونکہ ہم لوگ گورنمنٹ برطانیہ کی کسی ذاتی منافع یا کسی خود غرضی کی بنا پر تعریف و توصیف نہیں کرتے بلکہ ازروئے مذہب اسلام ہم مامور ہیں کہ ہم نہایت صفائی باطن اور صدق دل سے عملاً و قولاً وفاداری کا ثبوت دیں۔ ہم کسی خطاب یا زمین یا جاگیر کے حاصل کرنے کے لیے منافقانہ چالیں یا خوشامدیں کرنی حرام سمجھتے ہیں چونکہ تقریرجو بجنسہٖ ذیل میں لکھی جاتی ہے اس لئے ہمیں زیادہ کہنے کی ضرورت نہیں۔

    ژ

    خطبہ

    جَنَابِ مَسِیْحِ مَوعُود عَلیہ الصَّلٰوۃ وَالسَّلامُ

    جو بعد نماز عید الفطر پڑھا گیا

    مسلمانوں کو اللہ تعالیٰ کا بہت شکر کرنا چاہئے جس نے اُن کو ایک ایسا دین بخشا ہے جو علمی اور عملی طور پر ہر ایک قسم کے فساد اور مکروہ باتوں اور ہرایک نوع کی قباحت سے پاک ہے اگر انسان غور اور فکر سے دیکھے تو اُس کو معلوم ہوگا کہ واقعی طور پر تمام محامد اور صفات کا



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 598

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 598

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ

    598

    مستحق ؔ اللہ تعالیٰ ہی ہے اور کوئی انسان یا مخلوق واقعی اور حقیقی طور پر حمد و ثنا کا مستحق نہیں ہے۔ اگر انسان بغیر کسی قسم کی غرض کی ملونی کے دیکھے تو اُس پر بدیہی طور پر کھل جاوے گا کہ کوئی شخص جو مستحق حمد قرار پاتا ہے وہ یا تو اِس لئے مستحق ہوسکتا ہے کہ کسی ایسے زمانہ میں جبکہ کوئی وجود نہ تھا اور نہ کسی وجود کی خبر تھی وہ اس کا پیدا کرنے والا ہو۔ یا اس وجہ سے کہ ایسے زمانہ میں کہ کوئی وجود نہ تھا اور نہ معلوم تھا کہ وجود اور بقاء وجود اورحفظِ صحت اور قیامِ زندگی کے لئے کیا کیا اسباب ضروری ہیں اس نے وہ سب سامان مہیّا کئے ہوں یا ایسے زمانہ میں کہ اُس پر بہت سی مصیبتیں آسکتی تھیں اُس نے رحم کیا ہو اور اُس کو محفوظ رکھا ہو۔ اور یا اِس وجہ سے مستحق تعریف ہوسکتا ہے کہ محنت کرنے والے کی محنت کو ضائع نہ کرے اور محنت کرنے والوں کے حقوق پورے طور پر ادا کرے۔ اگرچہ بظاہر اُجرت کرنے والے کے حقوق کا دینا معاوضہ ہے لیکن ایسا شخص بھی محسن ہوسکتا ہے جو پورے طور پر حقوق ادا کرے۔ یہ صفات اعلیٰ درجہ کی ہیں جو کسی کو مستحق حمدوثنا بنا سکتی ہیں اب غور کرکے دیکھ لو کہ حقیقی طور پر اِن سب محامد کا مستحق صرف اللہ تعالیٰ ہی ہے جو کامل طور پر ان صفات سے متصف ہے اور کسی میں یہ صفات نہیں ہیں۔

    ا وّل ۔ دیکھو صفت خلق اور پرورش۔ یہ صفت اگرچہ انسان گمان کرسکتا ہے کہ ماں باپ اور دیگر محسنوں کے اغراض و مقاصد ہوتے ہیں۔ جن کی بناپر وہ احسان کرتے ہیں۔ اس پر دلیل یہ ہے کہ مثلاً بچہ تندرست خوبصورت توانا پیدا ہو تو ماں باپ کو خوشی ہوتی ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 599

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 599

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ

    599

    اورؔ اگر لڑکا ہو تو پھر یہ خوشی اور بھی بڑی ہوتی ہے شاد یانے بجائے جاتے ہیں۔ لیکن اگر لڑکی ہو تو گویا وہ گھر ماتم کدہ اور وہ دن سوگ کا دن ہو جاتا ہے اور اپنے تئیں مُنہ دکھانے کے قابل نہیں سمجھتے۔ بسا اوقات بعض نادان مختلف تدابیر سے لڑکیوں کو ہلاک کر دیتے یا اُن کی پرورش میں کم التفات کرتے ہیں۔ اور اگر بچہ لُنجہ اندھا اپاہج پیدا ہو تو چاہتے ہیں کہ وہ مر جاوے اور اکثر دفعہ تعجب نہیں کہ خود بھی وبالِ جان سمجھ کر مار دیتے ہوں۔ میں نے پڑھا ہے کہ یونانی لوگ ایسے بچوں کو عمداً ہلاک کر دیتے تھے بلکہ اُن کے ہاں شاہی قانون تھا کہ اگر کوئی بچہ ناکارہ۔ اپاہج۔ اندھا وغیرہ پیدا ہو تو اُس کو فوراً مار دیا جائے اس سے صاف پایا جاتا ہے کہ انسانی خیالات میں پرورش اورخبرگیری کے ساتھ ذاتی اور نفسانی اغراض ملے ہوئے ہوتے ہیں مگر اللہ تعالیٰ کی اس قدر مخلوق کی (جس کے تصوّر اور بیان سے وہم اورزبان قاصرہے اور جو زمین اورآسمان میں بھری پڑی ہے) خلق اور پرورش سے کوئی غرض نہیں ہے۔ وہ والدین کی طرح خدمت اور رزق نہیں چاہتا بلکہ اس نے مخلوق کو محض ربوبیّت کے تقاضا سے پیدا کیا ہے۔ ہر ایک شخص مان لے گا کہ پودا لگانا پھر آبپاشی کرنا اور اس کی خبر گیری رکھنا او ر ثمردار درخت ہونے تک محفوظ رکھنا ایک بڑا احسان ہے۔ پس انسان اور اس کی حالت اور غور و پرداخت پر غور کرو تو معلوم ہوگا کہ خدا تعالیٰ نے کتنا بڑا احسان کیا ہے کہ اس قدر انقلابات اور بیکسیوں کی گھڑیوں میں کیسے کیسے تغیرات میں اس کی دستگیری فرمائی ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 600

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 600

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/600/mode/1up

    600

    دوسراپہلو جو ابھی میں نے بیان کیا ہے کہ قبل از پیدایش وجود ایسےؔ سامان ہوں کہ تمدنی زندگی اور قویٰ کے کام کے لئے پورا سامان موجود ہو۔ دیکھو ہم ابھی پیدا ہی نہ ہوئے تھے کہ سامان پہلے ہی کردیا۔ منور سورج جو اب چڑھا ہوا ہے اور جس کی وجہ سے عام روشنی پھیلی ہوئی ہے اور دن چڑھا ہوا ہے اگر نہ ہوتا تو کیا ہم دیکھ سکتے تھے یاروشنی کے ذریعہ جو فوائد اور منافع ہمیں پہنچ سکتے ہیں ہم کس ذریعہ سے حاصل کرسکتے۔ اگر سورج اور چاند یااور کسی قسم کی روشنی نہ ہوتی تو بینائی بے کار ہوتی اگرچہ آنکھوں میں ایک قوّت دیکھنے کی ہے مگر وہ بیرونی اور خارجی روشنی کے بدوں نکمّی ہے۔ پس یہ کس قدر احسان ہے کہ قویٰ سے کام لینے کے لئے اس نے اُن ضروری سامانوں کو پہلے سے مہیّا کردیا۔ اور پھر یہ کس قدر اس کی رحمت ہے کہ اُس نے ایسے قویٰ دیئے ہیں اور ان میں بالقوہ ایسی استعدادات رکھ دی ہیں جو انسان کی تکمیل اور وصول الی الغایۃ کے لئے ازبس ضروری ہیں۔ دماغ میں، اعصاب میں ،عروق میں، ایسے خواص رکھے ہیں کہ انسان ان سے کام لیتا ہے اور ان کی تکمیل کرسکتا ہے اس لئے کہ قوتوں کی تکمیل کا سامان ساتھ ہی پیدا کردیا ہے۔ یہ تو اندرونی نظام کا حال ہے کہ ہر ایک قوت اُس منشاء اور مفاد سے پوری مناسبت رکھتی ہے جس میں انسان کی فلاح ہے اور بیرونی طور پر بھی ایسا ہی انتظام رکھا ہے کہ ہر شخص جس قسم کا حرفہ رکھتا ہے اس کے مناسب حال ادوات و آلات قبل از وجود مہیّا کر رکھے ہیں۔ مثلاً اگر کوئی جوتا بنانے والا ہے تواُس کو چمڑا اور دھاگا نہ ملے تو وہ



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 601

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 601

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/601/mode/1up

    601

    کہاؔ ں سے لائے اور کیونکر اپنے حرفہ کی تکمیل کرے اسی طرح درزی کو اگر کپڑا نہ ملے تو کیونکر سیئے۔ اِسی طرح ہر متنفّس کاحال ہے طبیب کیسا ہی حاذق اور عالم ہو لیکن اگر ادویہ نہ ہوں تو وہ کیا کرسکتا ہے۔ بڑی سوچ اور فکر سے ایک نسخہ لکھ کر دے گا لیکن بازار میں دوا نہ ملے تو کیا کرے گا۔ کس قدر خدا کا فضل ہے کہ ایک طرف تو اُس نے علم دیا ہے اور دوسری طرف نباتات، جمادات ،حیوانات جو مریضوں کے مناسب حال تھے پیدا کر دیئے ہیں اور اُن میں قسم قسم کے خواص رکھے ہیں جو ہر زمانہ میں نااندیشیدہ ضروریات کے کام آسکتے ہیں۔ غرض خدا تعالیٰ نے کوئی چیز بھی غیر مفید پیدانہیں کی۔ کتب طِبّ میں لکھا ہے کہ اگر کسی کا پیشاب بند ہو جائے تو بعض وقت جُوں کو احلیل میں دینے سے پیشاب جاری ہو جاتا ہے۔ انسان ان اشیاء کی مدد سے کہاں تک فائدہ اُٹھاتا ہے کوئی اندازہ کرسکتا ہے ہرگز نہیں بلکہ کسی کے تصوّر میں نہیں آسکتا پھر چوتھی بات پاداش محنت ہے اس کے لئے بھی خدا کا فضل درکار ہے مثلاً انسان کس قدر محنت و مشقّت سے زراعت کرتا ہے اگر خدا تعالیٰ کی مدد اُس کے ساتھ نہ ہو تو کیونکر اپنے گھر میں غلّہ لاسکے۔ اُسی کے فضل و کرم سے اپنے وقت پر ہر ایک چیز ہوتی ہے۔ چنانچہ اب قریب تھا کہ اس خشک سالی میں لوگ ہلاک ہو جاتے مگر خدا نے اپنے فضل سے بارش کردی اور بہت سے حصہ مخلوق کو سنبھال لیا۔ غرض اوّلاً بالذّات اکمل اور اعلیٰ طور سے خدا تعالیٰ ہی مستحق تعریف ہے اس کے مقابلہ میں کسی دوسرے کا ذاتی طور پر کوئی بھی استحقاق نہیں۔ اگر کسی دوسرے کو استحقاق تعریف کا ہے تو صرف طفیلی طور پرہے۔ یہ بھی خدا تعالیٰ کا رحم ہے کہ باوجود یکہ وہ وحدہٗ



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 602

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 602

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/602/mode/1up

    602

    لا شرؔ یک ہے۔ مگر اُس نے طفیلی طور پر بعض کو اپنے محامد میں شریک کرلیا ہے۔ جیسے اس سورہ شریفہ میں بیان فرمایا ہے:۔

    3333333

    اس میں اللہ تعالیٰ نے حقیقی مستحق حمد کے ساتھ عارضی مستحق حمد کا بھی اشارتاً ذکر فرمایا ہے اور یہ اس لئے ہے کہ اخلاق فاضلہ کی تکمیل ہو۔ چنانچہ اِس سورہ میں تین ۳ قسم کے حق بیان فرمائے ہیں۔ اوّل فرمایا کہ تم پناہ مانگو اللہ کے پاس جو جامع جمیع صفات کاملہ ہے۔ اور جو ربّ ہے لوگوں کا۔ اور ملکبھی ہے اور معبود و مطلوب حقیقی بھی ہے ۔یہ سورہ اِس قسم کی ہے کہ اِس میں اصل توحید کو تو قائم رکھا ہے مگر معًایہ بھی اشارہ کیا ہے کہ دُوسرے لوگوں کے حقوق بھی ضائع نہ کریں جو اِن اسماء کے مظہر ظلّی طور پر ہیں۔ ربّ کے لفظ میں اشارہ ہے کہ گو حقیقی طور پر خدا ہی پرورش کرنے والا اور تکمیل تک پہنچانے والا ہے لیکن عارضی اور ظلّی طور پر دو اور بھی وجود ہیں جو ربوبیّت



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 603

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 603

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/603/mode/1up

    603

    کےؔ مظہر ہیں۔ ایک جسمانی طور پر دُوسرا رُوحانی طور پر۔ جسمانی طور پر والدین ہیں اور رُوحانی طور پر مُرشد اور ہادی ہے۔

    دوسرے مقام پر تفصیل کے ساتھ بھی ذکر فرمایا ہے:۔

    33 ۱؂

    یعنی خدا نے یہ چاہا ہے کہ کسی دوسرے کی بندگی نہ کرو اور والدین سے احسان کرو۔ حقیقت میں کیسی ربوبیّت ہے کہ انسان بچہ ہوتا ہے اور کسی قسم کی طاقت نہیں رکھتا۔ اس حالت میں ماں کیا کیا خدمات کرتی ہے اور والد اس حالت میں ماں کی مہمات کاکیسا متکفّل ہوتاہے۔ خدا تعالیٰ نے محض اپنے فضل سے ناتواں مخلوق کی خبرگیری کے لئے دو محل پیدا کر دیئے ہیں اور اپنی محبت کے انوار سے ایک پَرتَو محبت کا اُن میں ڈال دیا ہے۔ مگر یاد رکھنا چاہیئے کہ ماں باپ کی محبت عارضی ہے اور خدا تعالیٰ کی محبت حقیقی ہے اور جب تک قلوب میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے اس کا القانہ ہو کوئی فرد بشرخواہ دوست ہو یا کوئی برابر درجہ کا ہو یا کوئی حاکم ہو کسی سے محبت نہیں کرسکتا اور یہ خدا کی کمال ربوبیّت کا راز ہے کہ ماں باپ بچوں سے ایسی محبت کرتے ہیں کہ اُن کے تکفّل میں ہر قسم کے دُکھ شرح صدر سے اُٹھاتے ہیںیہاں تک کہ اُن کی زندگی کے لئے مرنے سے بھی دریغ نہیں کرتے۔ پس خدا تعالیٰ نے تکمیل اخلاق فاضلہ کے لئے ربِّ النّاس کے لفظ میں والدین اور مُرشد کی طرف



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 604

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 604

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/604/mode/1up

    604

    ایماؔ فرمایا ہے تاکہ اس مجازی اور مشہود سلسلہ شکر گذاری سے حقیقی ربّ و ہادی کی شکر گذاری میں قدم اُٹھائیں۔ اِسی راز کے حل کی یہ کلید ہے کہ اِس سورہ شریفہ کو ربّ النّاس سے شروع فرمایا ہے۔ الٰہ النّاس سے آغاز نہیں کیا۔ چونکہ مرشد روحانی خدا تعالیٰ کے منشاء کے موافق اس کی توفیق و ہدایت سے تربیت کرتا ہے اس لئے وہ بھی اِسی میں شامل ہے پھر دُوسرا ٹکڑا اس میں مَلِک النّاس ہے یعنی تم پناہ مانگو خدا کے پاس جو تمہارا بادشاہ ہے۔ یہ ایک اور اشارہ ہے تا لوگوں کو متمدّن دنیا کے اصول سے واقف کیاجاوے اور مہذّب بنایا جاوے۔ حقیقی طور پر تو اللہ تعالیٰ ہی بادشاہ ہے۔ مگر اِس میں اشارہ ہے کہ ظِلّی طور پر بادشاہ ہوتے ہیں اور اِسی لئے اِس میں اشارۃً مَلِک وقت کے حقوق کی نگہداشت کی طرف بھی ایما ہے۔ یہاں کافر اور مشرک اورموحّد بادشاہ یعنی کسی قسم کی قید نہیں بلکہ عام طور پر ہے خواہ کسی مذہب کا بادشاہ ہو ، مذہب اور اعتقاد کے حصے جدا ہیں۔ قرآن میں جہاں جہاں خدا نے محسن کاذکر فرمایا ہے وہاں کوئی شرط نہیں لگائی کہ وہ مسلمان ہو اور موحّد ہو اور فلاں سلسلہ کا ہوبلکہ عام طور پر محسن کی نسبت ذکر ہے ۔ خواہ وہ کوئی مذہب رکھتا ہو اور پھر خداتعالیٰ اپنے کلام پاک میں محسن کے ساتھ احسان کرنے کی سخت تاکید فرماتا ہے جیسے آیت ذیل سے ہو یدا ہے:۔

    3 ۱؂

    کیا احسان کا بدلا احسان کے سوا بھی ہوسکتا ہے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 605

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 605

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/605/mode/1up

    605

    اب ؔ ہم اپنی جماعت کو اور تمام سننے والوں کو بڑی صفائی اور وضاحت سے سناتے ہیں کہ سلطنت انگریزی ہماری محسن ہے اُس نے ہم پر بڑے بڑے احسان کئے ہیں۔ جس کی عمر ساٹھ یا ستّر برس کی ہوگی وہ خوب جانتا ہوگا کہ ہم پر سکھوں کا ایک زمانہ گذرا ہے اس وقت مسلمانوں پر جس قدر آفتیں حائل تھیں وہ پوشیدہ نہیں ہیں اُن کی یاد سے بدن پر لرزہ پڑتا ہے اور دل کانپ اٹھتا ہے۔ اُس وقت مسلمانوں کو عبادات اور فرائض مذہبی کی بجا آوری سے جن کا بجا لانا ان کو جان سے عزیز تر ہے روکا گیا تھا۔ بانگِ نماز جو نماز کا مقدمہ ہے اس کو بآواز بلند پکارنے سے منع کیا گیا تھا۔ اگر کبھی مؤذّن کے منہ سے سہواً اللّٰہ اکبر بآواز بلند نکل جاتا تو اُس کو مار ڈالا جاتا تھا اِسی طرح پر مسلمانوں کے حلال و حرام کے معاملہ میں بیجا تصرّف کیا گیا تھا۔ ایک گائے کے مقدمہ میں ایک دفعہ پانچ ہزار غریب مسلمان قتل کئے گئے۔ بٹالہ کا واقعہ ہے کہ ایک سیّد وہیں کا رہنے والا باہر سے دروازہ پر آیا وہاں گائیوں کا ہجوم تھا اس نے تلوار کی نوک سے ذرہ ہٹایاایک گائے کے چمڑے کو اتفاق سے خفیف سی خراش پہنچ گئی اس بیچارہ کو پکڑ لیا گیا اوراِس امر پر زور دیا گیا کہ اس کو قتل کردیا جائے۔ آخر بڑی سفارشوں کے بعد جان سے بچ گیا لیکن اُس کا ہاتھ ضرور کاٹا گیا۔ مگر اب دیکھو کہ ہر قوم و مذہب کے لوگوں کو کیسی آزادی ہے ہم صرف مسلمانوں ہی کا ذکر کرتے ہیں فرائض مذہبی اور عبادات کے بجا لانے میں سلطنت نے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 606

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 606

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/606/mode/1up

    606

    پوریؔ آزا دی دے رکھی ہے اور کسی کے مال و جان و آبرو سے کوئی ناحق کا تعرض نہیں برخلاف اُس پُرفتن وقت کے کہ ہر ایک شخص کیسا ہی اس کا حساب پاک ہو اپنی جان و مال پر لرزتا رہتا تھا۔ اب اگر کوئی خود اپنا چلن آپ خراب کرلے اور اپنی کج روی او ربے اندامی اور ارتکاب جرائم سے خود مستوجب عقوبت ٹھہر جائے تو اور بات ہے۔ یا خود ہی سوء اعتقاد اور غفلت کی وجہ سے عبادت میں کوتاہی کرے تو جدا امر ہے لیکن گورنمنٹ کی طرف سے ہر طرح کی پوری آزادی ہے۔ اس وقت جس قدر عابد بننا چاہو بنو کوئی روک نہیں گورنمنٹ خود معابد مذہبی کی ُ حرمت کرتی ہے اور اُن کی مرمت وغیرہ پر ہزاروں روپیہ خرچ کر دیتی ہے۔ سِکھوں کے زمانہ میں اس کے خلاف یہ حال تھا کہ مسجدوں میں بھنگ گھٹتی تھی اور گھوڑے بندھتے تھے جس کا نمونہ خود یہاں قادیان میں موجود ہے اور پنجاب کے بڑے بڑے شہروں میں اِس کے بکثرت نمونے ملیں گے۔ لاہور میں آج تک کئی ایک مسجدیں سِکھوں کے قبضہ میں ہیں۔ آج اس کے مقابل میں گورنمنٹ انگلشیہ ان بزرگ مکانوں کی ہر قسم کی واجب عزت کرتی ہے اور مذہبی مکانات کی تعظیم و تکریم اپنے فرائض میں سے سمجھتی ہے جیسا کہ ان ہی دنوں حضور وائسرائے لارڈ کرزن صاحب بہادر بالقابہٖ نے دہلی کی جامع مسجد میں جوتا پہن کر جانے کی مخالفت اپنی عملی حالت سے ثابت کردی اور قابل اقتدا نمونہ بادشاہانہ اخلاق فاضلہ کا دیا اور اُن کی اُن تقریروں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 607

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 607

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/607/mode/1up

    607

    سےؔ جو وقتاً فوقتاً انہوں نے مختلف موقعوں پر کی ہیں صاف معلوم ہوگیا ہے کہ وہ مذہبی مکانات کی کیسی عزت کرتے ہیں پھر دیکھو کہ گورنمنٹ نے کہیں منادات نہیں کی کہ کوئی بآوازِ بلند بانگ نہ دے یا روزہ نہ رکھے بلکہ انہوں نے ہر قسم کے تغذیہ کے سامان مہیّا کئے ہیں جس کا سکھوں کے ذلیل زمانہ میں نام و نشان تک نہ تھا۔ برف سوڈاواٹر اور

    بسکٹ ڈبل روٹی وغیرہ ہر قسم کی غذائیں بہم پہنچائیں اور ہر قسم کی سہولت دے رکھی ہے ۔یہ ایک ضمنی امداد ہے جو اِن لوگوں سے ہمارے شعائرِ اسلام کو پہنچی ہے۔ اب اگر کوئی خود روزہ نہ رکھے تو یہ اور بات ہے افسوس کی بات ہے کہ مسلمان خود شریعت کی توہین کرتے ہیں۔ چنانچہ دیکھو جنہوں نے اِن دنوں روزے رکھے ہیں۔ وہ کچھ دُبلے نہیں ہوگئے اور جنہوں نے استخفاف کے ساتھ اِس مہینہ کو گذارا ہے وہ کچھ موٹے نہیں ہوگئے ان کا بھی وقت گذر گیا اور ان کا بھی زمانہ گذر گیا۔ جاڑہ کے روزے تھے صرف غذا کے اوقات کی ایک تبدیلی تھی سات آٹھ بجے نہ کھائی چار پانچ بجے کھالی باوجود اِس قدر رعایت کے پھر بھی بہتوں نے شعائراللہ کی عظمت نہیں کی اور خدا تعالیٰ کے اِس واجب التکریم مہمان ماہِ رمضان کو بڑی حقارت سے دیکھا۔ اِس قدر آسانی کے مہینوں میں رمضان کا آنا ایک قسم کا معیار تھا اور مطیع و عاصی میں فرق کرنے کے لئے یہ روزے میزان کا حکم رکھتے تھے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 608

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 608

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/608/mode/1up

    608

    خدؔ ا تعالیٰ کی طرف سے سلطنت نے ہر قسم کی آزادی دے رکھی ہے طرح طرح کے پھل اور غذائیں میسّر آتی ہیں کوئی آسایش و آرام کا سامان نہیں جو آج مہیّا نہ ہوسکتا ہو۔ با ایں ہمہ جو پرواہ نہیں کی گئی اِس کی کیا وجہ ہے یہی کہ دلوں میں ایمان نہیں رہا۔ افسوس خدا کا ایک ادنیٰ بھنگی کے برابر بھی لحاظ نہیں کیا جاتا گویا یہ خیال ہے کہ خدا سے کبھی واسطہ ہی نہ ہوگا اور نہ کبھی اُس سے پالا پڑے گا۔ اور اُس کی عدالت کے سامنے جانا ہی نہیں ہوگا۔ کاش منکر غور کریں اور سوچیں کہ کروڑوں سورجوں کی روشنی سے بھی بڑھ کر خدا تعالیٰ کی ہستی کے ثبوت ہیں افسوس کی جگہ ہے کہ ایک جوتہ کو دیکھ کر یقینی طور پر سمجھ لیا جاتا ہے کہ اِس کاکوئی بنانے والا ہے مگر یہ کس قدر بد بختی ہے کہ خدا تعالیٰ کی بے انتہا مخلوق کو دیکھ کر بھی اُس پر ایمان نہ ہو یا ایسا ایمان ہو جو نہ ہونے میں داخل ہے خدا تعالیٰ کی ہم پر بہت رحمتیں ہیں ازاں جملہ ایک یہ ہے کہ اُس نے ہم کو جلتے ہوئے تنور سے نکالا سِکھوں کازمانہ ایک آتشی تنور تھا اور انگریزوں کا قدم رحمت و برکت کا قدم ہے۔ میں نے سنا ہے کہ جب اوّل ہی اوّل انگریز آئے تو ہوشیارپور میں کسی مؤذّن نے اُونچی اذان کہی چونکہ ابھی ابتدا تھی اور ہندوؤں اور سِکھوں کا خیال تھا کہ یہ بھی اُونچی اذان کہنے پر روکیں گے یا ان کی طرح اگر گائے کو کسی سے زخم لگ جائے تو اُس کا ہاتھ کاٹیں گے اُس اونچی اذان کہنے والے مؤذن کو پکڑلیا۔ ایک بڑا بھاری ہجوم ہوکر ڈپٹی کمشنر کے سامنے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 609

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 609

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/609/mode/1up

    609

    اُسےؔ لے گئے بڑے بڑے رئیس مہاجن جمع ہوئے اور کہا حضور ہمارے آٹے بھرشٹ ہوگئے ہمارے برتن ناپاک ہوگئے جب یہ باتیں اُس انگریز کو سنائی گئیں تو اُسے بڑا تعجب ہوا کہ کیا بانگ میں ایسی خاصیت ہے کہ کھانے کی چیزیں ناپاک ہوجاتی ہیں اُس نے سررشتہ دار سے کہا کہ جب تک تجربہ نہ کرلیا جائے اِس مقدمہ کو نہ کرنا چاہیئے چنانچہ اُس نے مؤذن کو حکم دیا کہ تو پھر اُسی طرح بانگ دے وہ ڈرا کہ شاید دوسرا جرم قائم نہ ہو بانگ دینے سے ذرہ جھجکا مگر جب اُس کو تسلی دی گئی اُس نے اُسی قدر زور سے بانگ دی صاحب بہادر نے کہا کہ ہم کو تو اِس سے کوئی ضرر نہیں پہنچا سر رشتہ دار سے پوچھا کہ تم کو کوئی ضرر پہنچا اُس نے بھی کہا کہ حقیقت میں کوئی ضرر نہیں ہوا آخر اُس کو چھوڑ دیا گیا اور کہا گیا کہ جاؤ جس طرح چاہو بانگ دو۔ اللّٰہ اکبر۔ یہ کس قدر آزادی ہے اور کس قدر اللہ تعالیٰ کا احسان ہے پھر ایسے احسان پر اور ایسے انعام صریح پر بھی اگرکوئی دل گورنمنٹ انگریزی کا احسان محسوس نہیں کرتا تو وہ دل بڑا کافر نعمت اور نمک حرام اور سینہ سے چیر کر نکال ڈالنے کے لائق ہے۔

    خود ہمارے اِس گاؤں میں جہاں ہماری مسجد ہے کا ر داروں کی جگہ تھی اُس وقت ہمارے بچپن کا زمانہ تھا لیکن میں نے معتبر آدمیوں سے سنا ہے کہ جب انگریزوں کا دخل ہوگیا تو چند روز تک وہی سابقہ قانون رہا انہی ایّام میں ایک کاردار یہاں آیا ہوا تھا اُس کے پاس



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 610

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 610

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/610/mode/1up

    610

    ایکؔ مسلمان سپاہی تھا وہ مسجد میں آیا اور مؤذّن کو کہا کہ بانگ دو اُس نے وہی ڈرتے ڈرتے گنگناکر اذان دی سپاہی نے کہا کہ کیا تم اِسی طرح پر بانگ دیا کرتے ہو مؤذّن نے کہا ہاں اِسی طرح دیتے ہیں سپاہی نے کہا کہ نہیں کوٹھے پر چڑھ کر اُونچی آواز سے اذان دو اور جس قدر زور سے ممکن ہوسکتا ہے بانگ دو وہ ڈرا آخر اُس نے سپاہی کے کہنے پر زور سے بانگ دی اِس پر تمام ہندو اکٹھے ہوگئے اور مُلاّ کو پکڑ لیا، وہ بیچارہ بہت ڈرا اور گھبرایا کہ کاردار مجھے پھانسی دے دے گاسپاہی نے کہا کہ میں تیرے ساتھ ہوں آخر سنگ دِل چھری مار برہمن اُس کو پکڑ کر کاردار کے پاس لے گئے۔ اور کہا کہ مہاراج اِس نے ہم کو بھرشٹ کردیا کار دار تو جانتا تھا کہ سلطنت تبدیل ہوگئی ہے اور اب وہ سکھا شاہی نہیں رہی مگر ذرا دبی زبان سے پوچھا کہ تو نے اُونچی آواز سے کیوں بانگ دی؟ سپاہی نے آگے بڑھ کر کہا کہ اُس نے نہیں میں نے بانگ دی کاردار نے کہا۔ کم بختو ! کیوں شور ڈالتے ہو لاہور میں تو اب کھلے طور سے گائیاں ذبح ہوتی ہیں تم اذان کو روتے ہو جاؤ چپکے ہوکر بیٹھ رہو۔ الغرض یہ واقعی اور سچّی بات ہے جو ہمارے دل سے نکلتی ہے جس قوم نے ہم کو تحت الثریٰ سے نکالا ہے اُس کا احسان ہم نہ مانیں تو پھر یہ کس قدر ناشکری اور نمک ّ*** ہے۔

    اِس کے علاوہ پنجاب میں بڑی جہالت پھیلی ہوئی تھی ایک بوڑھے آدمی کمےّ شاہ نے بیان کیا کہ میں نے اپنے اُستاد کو دیکھا ہے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 611

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 611

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/611/mode/1up

    611

    کہؔ وہ بڑے تضرّع سے دُعا کیا کرتے تھے کہ صحیح بخاری کی ایک دفعہ زیارت ہو جائے اور بعض وقت اِس خیال سے کہ کہاں اس کی زیارت ممکن ہے دُعا کرتے کرتے اتناروتے کہ ان کی ہچکیاں بندھ جاتی تھیں اب وہی بخاری دو چار روپے میں امرت سر اور لاہور سے ملتی ہے۔ ایک مولوی شیر محمد صاحب تھے کہیں سے دو چار ورق احیاء العلوم کے اُن کو مل گئے تھے کتنی مُدت تک ہر نماز کے بعد نمازیوں کو بڑی خوشی اور فخر سے دکھایا کرتے تھے کہ یہ احیاء العلوم ہے اور تڑپتے تھے کہ پوری کتاب کہیں سے مل جائے اب جابجا احیاء العلوم مطبوعہ موجود ہے۔ غرض انگریزی مَقدم کی برکت سے لوگوں کی دینی آنکھ بھی کھل گئی ہے اور خدا تعالیٰ خوب جانتا ہے کہ اسی سلطنت کے ذریعہ دین کی کس قدر اعانت ہوئی ہے کہ کسی اور سلطنت میں ممکن ہی نہیں۔ پریس کی برکت اور قسم قسم کے کاغذ کی ایجاد سے ہر قسم کی کتابیں تھوڑی تھوڑی قیمت پر میسر آسکتی ہیں اور پھر ڈاک خانہ کے طفیل کہیں سے کہیں گھر بیٹھے بٹھائے پہنچ جاتی ہیں اور یوں دین کی صداقتوں کی تبلیغ کی راہ کس قدر سہل اور صاف ہوگئی ہے۔ پھر منجملہ اور برکات کے جو تائید دین کے لئے اس گورنمنٹ کے عہد میں ملی ہیں ایک یہ بھی ہے کہ عقلی قویٰ اور ذہنی طاقتوں میں بڑی ترقی ہوئی ہے اور چونکہ گورنمنٹ نے ہر ایک قوم کو اپنے مذہب کی اشاعت کی آزادی دے رکھی ہے اِس لئے ہر طرح پرلوگوں کو ہر ایک مذہب کے اصول او ر دلائل پرکھنے اور اُن پر غور کرنے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 612

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 612

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/612/mode/1up

    612

    کا موؔ قع مل گیا ہے۔ اسلام پر جب مختلف مذہب والوں نے حملے کئے تو اہل اسلام کو اپنے مذہب کی تائید اور صداقت کے لئے اپنی مذہبی کتابوں پر غور کرنے کا موقع ملا اور اُن کی عقلی قوتوں میں ترقی ہوئی قاعدہ کی بات ہے کہ جیسے جسمانی قویٰ ریاضت کرنے سے بڑھتے ہیں ایسا ہی روحانی قویٰ بھی ریاضت سے نشو و نما پاتے ہیں جیسا گھوڑا چابک سوار کے نیچے آکر درست ہوتا ہے اسی طرح سے انگریزوں کے آنے سے مذہب کے اُصولوں پر غور کرنے کا موقع ملا ہے اور تدبّر کرنے والوں کو استقامت اور استحکام اپنے مذہبِ حق میں زیادہ مل گیا اور جس جس موقع پر قرآن کریم کے مخالفوں نے انگشت رکھی وہیں سے غور کرنے والوں کو ایک گنجِ معارف ہاتھ لگا اور اس آزادی کی وجہ سے علم کلام نے بھی معتدبہ ترقی کی اور یہ ترقی مخصوصًا اِسی جگہ پر ہوئی ہے اب اگر کوئی روم یا شام کا رہنے والا خواہ وہ کیسا ہی عالم و فاضل کیوں نہ ہو آجائے تو وہ عیسائیوں یا آریوں کے اعتراضات کا کافی جواب نہ دے سکے گا کیونکہ اس کو ایسی آزادی اور وسعت کے ساتھ مختلف مذاہب کے اصولوں کے موازنہ کرنے کا موقع نہیں ملا غرض جیسے جسمانی طور پر گورنمنٹ انگلشیہ سے ملک میں امن ہوا ایسے ہی روحانی امن بھی پوری طرح پھیلا چونکہ ہمارا تعلق دینی اور رُوحانی باتوں سے ہے اس لئے ہم زیادہ تر ان امور کا ذکر کریں گے جو فرائض مذہب کے ادا کرنے میں گورنمنٹ کی طرف سے ہم کو بطور احسان ملے ہیں پس یاد رکھنا چاہئے کہ انسان پوری آزادی



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 613

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 613

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/613/mode/1up

    613

    اورؔ اطمینان کے ساتھ عبادات کو جب ہی بجا لاسکتا ہے کہ اس میں چار شرطیں موجود ہوں اور وہ یہ ہیں:۔

    اوّل صحت: اگرکوئی شخص ایسا ضعیف ہو کہ چارپائی سے اٹھ نہ سکے وہ صوم و صلوٰۃ کا کیا پابند ہوسکتا ہے اور پھر وہ اسی طرح پر حج زکوٰۃ وغیرہ بہت سے ضروری امور کی بجاآوری سے قاصر رہے گا۔ اب دیکھنا چاہئے کہ گورنمنٹ کے طفیل سے ہم کو صحت جسمانی کے بحال رکھنے کے لئے کس قدر سامان ملے ہیں ہر بڑے شہر اور قصبہ میں کوئی نہ کوئی ہسپتال ضرور ہے جہاں مریضوں کا علاج نہایت دلسوزی اور ہمدردی سے کیا جاتا ہے اور دوا اور غذا وغیرہ مُفت دی جاتی ہیں بعض بیماروں کو ہسپتال میں رکھ کر ایسے طور پر اُن کی نگہداشت اور غور و پرداخت کی جاتی ہے کہ کوئی اپنے گھر میں بھی ایسی آسانی اور سہولت اور آرام کے ساتھ علاج نہیں کراسکتا۔ حفظان صحت کا ایک الگ محکمہ بنا رکھا ہے جس پر کروڑہا روپیہ سالانہ خرچ ہوتا ہے قصبات اور شہروں کی صفائی کے بڑے بڑے سامان بہم پہنچائے ہیں گندے پانی اور مواد ردیّہ مُضر صحت کے دفع کرنے کے لئے الگ انتظام ہیں۔ پھر ہر قسم کی سریع الاثر ادویہ طیار کرکے بہت کم قیمت پر مہیا کی جاتی ہیں یہاں تک کہ ہر ایک آدمی چند دوائیں اپنے گھر میں رکھ کر بوقت ضرورت علاج کرسکتا ہے۔ بڑے بڑے میڈیکل کالج جاری کرکے طبّی تعلیم کو کثرت سے پھیلایا گیا ہے یہاں تک کہ دیہات میں بھی ڈاکٹر



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 614

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 614

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/614/mode/1up

    614

    ملتےؔ ہیں۔ بعض خطرناک امراض مثلاً چیچک۔ ہیضہ۔ طاعون وغیرہ کے دفعیہ کے لئے حال ہی میں طاعون کے متعلق جس قدر کارروائی گورنمنٹ کی طرف سے عمل میں آئی ہے۔ وہ بہت ہی کچھ شکرگذاری کے قابل ہے غرض صحت کے لحاظ سے گورنمنٹ نے ہر قسم کی ضروری امداد دی ہے اور اِس طرح پر عبادت کے لئے پہلی اور ضروری شرط کے پورا کرنے کے واسطے بہت بڑی تائید کی ہے۔

    دو۲سری شرط ایمان ہے۔ اگر خدا تعالیٰ اور اس کے احکام پر ایمان ہی نہ رہا ہو اور اندر ہی اندر بے دینی اور الحاد کا جذام لگ گیا ہو تو بھی تعمیل احکامِ الٰہی نہیں ہوسکتی یہی وجہ ہے کہ بہت لوگ کہا کرتے ہیں۔ ایہہ جگ مِٹھا تے اگلا کِن ڈِٹھا۔ افسوس ہے دو آدمیوں کی شہادت پر ایک مجرم کو پھانسی مل سکتی ہے مگر باوجودیکہ ایک لاکھ چوبیس ہزار پیغمبر اور بے انتہا ولیوں کی شہادت موجود ہے لیکن ابھی تک اس قسم کا الحاد لوگوں کے دِلوں سے نہیں گیا۔ ہر زمانہ میں خدا تعالیٰ اپنے مقتدر نشانوں اور معجزات سے اَنَا المَوجُود کہتا ہے مگر یہ کمبخت کان رکھتے ہوئے بھی نہیں سنتے۔ غرض یہ شرط بھی بہت بڑی ضروری شرط ہے اِس کے لئے بھی ہمیں گورنمنٹ انگلشیہ کا شکر گذار ہونا چاہیئے کیونکہ ایمان و اعتقاد پختہ کرنے کے لئے عام تعلیم مذہبی کی ضرورت



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 615

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 615

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/615/mode/1up

    615

    تھیؔ اور مذہبی تعلیم کا انحصار مذہبی کتابوں کی اشاعت سے وابستہ تھا۔ پریس اور ڈاکخانہ کی برکت سے ہر قسم کی مذہبی کتابیں مل سکتی ہیں اور اخبارات کے ذریعہ تبادلہ خیالات کا موقع بھی ملتا ہے سعید الفطرت لوگوں کے لئے بڑا بھاری موقع حاصل ہے کہ ایمان و اعتقاد میں رسوخ حاصل کریں۔ ان باتوں کے علاوہ جو ضروری اور اشد ضروری بات ایمان کے رسوخ کے لئے ہے وہ خد ا تعالیٰ کینشانات ہیں جو اس شخص کے ہاتھ پر سرزد ہوتے ہیں جو خدا کی طرف سے مامور ہوکر آتا ہے اور اپنے طرز عمل سے گم شدہ صداقتوں اور معرفتوں کو زندہ کرتا ہے سو خدا کا شکر کرنا چاہیئے کہ اُس نے اِس زمانہ میں ایسے شخص کو پھر ایمان زندہ کرنے کے لئے مامور کیااور ا س لئے بھیجا کہ تا لوگ قوتِ یقین میں ترقی کریں وہ اسی مبارک گورنمنٹ کے عہد میں آیا وہ کون ہے؟ وہی جو تم میں کھڑا ہو ا بول رہا ہے چونکہ یہ مسلّم بات ہے کہ جب تک پورے طور پر ایمان نہ ہو نیکی کے اعمال انسان علٰی وجہ الاتم بجا نہیں لاسکتا جس قدر کوئی پہلو یا کنگرہ ایمان کا گرا ہوا ہو اُسی قدر انسان اعمال میں سُست اور کمزور ہوگا اس بنا پر ولی وہ کہلاتا ہے جس کا ہر پہلو سالم ہو اوروہ کسی پہلو سے کمزور نہ ہو اس کی عبادات اکمل و اتم طور پر صادر ہوتی ہوں غرض دوسری شرط ایمان کی سلامتی ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 616

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 616

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/616/mode/1up

    616

    تیسرؔ ی شرط انسان کے لئے طاقت مالی ہے۔ مساجد کی تعمیر اور اُمور متعلقہ اسلام کی بجاآوری مالی طاقت پرمنحصر ہے۔ اس کے سواتمدّنی زندگی اور تمام اُمور کا اور خصوصاً مساجد کاانتظام بہت مشکل سے ہوتا ہے اب اِس پہلو کے لحاظ سے گورنمنٹ انگلشیہ کو دیکھو۔ گورنمنٹ نے ہر قسم کی تجارت کو ترقی دی۔ تعلیم پھیلاکر ملک کے باشندوں کو نوکریاں دیں اور بعض کو بڑے بڑے عہدے بھی دیئے سفر کے وسائل بہم پہنچاکر دوسرے ملکوں میں جاکر روپیہ کما لانے میں مدد دی چنانچہ ڈاکٹر پلیڈر عدالتوں کے عہدہ دار سرشتہ تعلیم کے ملازموں کو دیکھو غرض بہت سے ذریعوں سے لوگ معقول روپیہ کماتے ہیں اور تجارت کرنے والے سوداگر قسم قسم کے تجارتی مال و لایت اور دُور دراز ملکوں افریقہ اور آسٹریلیا وغیرہ میں جاکر مالا مال ہوکر آتے ہیں غرض گورنمنٹ نے روزگار عام کردیا ہے او ر روپیہ کمانے کے بہت سے ذریعے پیدا کر دیئے ہیں۔

    چوتھی شرط امن ہے۔ یہ امن کی شرط انسان کے اپنے اختیار میں نہیں ہے جب سے دنیا پیدا ہوئی ہے اس کا انحصار علی الخصوص سلطنت پر رکھا گیا ہے۔ جس قدر سلطنت نیک نیت اور اس کا دل کھوٹ سے پاک ہوگا اسی قدر یہ شرط زیادہ صفائی سے پوری ہوگی اب اس زمانہ میں امن کی شرط اعلیٰ درجہ پر پوری ہو رہی ہے۔ میں خوب یقین رکھتا ہوں کہ سِکھوں کے زمانہ کے دن انگریزوں کے زمانہ کی راتوں سے بھی کم درجہ پر تھے یہاں سے قریب ہی بوٹر*ایک گاؤں ہے وہاں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 617

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 617

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/617/mode/1up

    617

    اگرؔ یہاں سے کوئی عورت جایا کرتی تھی تو رو رو کر جایا کرتی تھی کہ خدا جانے پھر واپس آنا ہوگا یا نہیں۔ اب یہ حالت ہوگئی ہے کہ انسان زمین کی انتہا تک چلاجائے اس کو کسی قسم کا خطرہ نہیں سفر کے وسائل ایسے آسان کردیئے گئے ہیں کہ ہر ایک قسم کا آرام حاصل ہے گویا گھر کی طرح ریل میں بیٹھا ہوا یا سویا ہوا جہاں چاہے چلا جائے۔ مال و جان کی حفاظت کے لئے پولیس کا وسیع صیغہ موجود ہے۔حقوق کی حفاظت کے لئے عدالتیں کھلی ہیں جہاں تک چاہے چارہ جوئی کرتا چلا جائے۔ یہ کس قدر احسان ہیں جو ہماری عملی آزادی کا موجب ہوئے ہیں۔ پس اگر ایسی حالت میں جبکہ جسم و رُوح پر بے انتہا احسان ہو رہے ہوں ہم میں صلح کاری اور شکرگزاری کا مادہ پیدا نہیں ہوتا تو تعجب کی بات ہے ؟ جو مخلوق کا شکر نہیں کرتا وہ خدا تعالیٰ کا بھی شکر ادا نہیں کرسکتا۔ وجہ کیا ہے؟ اس لئے کہ وہ مخلوق بھی تو خدا ہی کا فرستادہ ہوتا ہے اور خدا ہی کے ارادہ کے تحت میں چلتا ہے۔ الغرض یہ سب اُمور جو میں نے بیان کئے ہیں ایک نیک دل انسان کو مجبور کر دیتے ہیں کہ وہ ایسے محسن کا شکر گذار ہو یہی وجہ ہے کہ ہم بار بار اپنی تصنیفات میں اور اپنی تقریروں میں گورنمنٹ انگلشیہ کے احسانوں کا ذکر کرتے ہیں کیونکہ ہمارا دل واقعی اس کے احسانات کی لذّت سے بھرا ہوا ہے احسان فراموش نادان اپنی منافقانہ فطرتوں پر قیاس کرکے ہمارے اِس طریق عمل کو جو صدق و اخلاص سے پیدا ہوتا ہے جھوٹی خوشامد پر حمل کرتے ہیں۔

    اب میں پھر اصل بات کی طرف عود کر کے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 618

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 618

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/618/mode/1up

    618

    بتلاؔ نا چاہتا ہوں کہ پہلے اس سورۃ میں خدا تعالیٰ نے رَبِّ النّاس فرمایا پھر ملک النّاس۔ آخر میں اِلٰہ النّاس فرمایا جو اصلی مقصود اور مطلوب انسان ہے۔ اِلٰہ کہتے ہیں معبود ۔ مقصود۔ مطلوب کو۔ لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہ کے معنی یہی ہیں کہ لَا مَعْبُوْدَ لِیْ وَلَا مَقْصُوْدَ لِیْ وَلَا مَطْلُوْبَ لِیْ اِلَّا اللّٰہُ یہی سچی توحید ہے کہ ہر مدح و ستایش کا مستحق اللہ تعالیٰ ہی کو ٹھہرایا جاوے۔ پھر فرمایا 3 ۱؂ یعنی وسوسہ ڈالنے والے خنّاس کے شر سے پناہ مانگو۔ خنّاس عربی میں سانپ کو کہتے ہیں جسے عبرانی میں نحاش کہتے ہیں اس لئے کہ اس نے پہلے بھی بدی کی تھی۔ یہاں ابلیس یا شیطان نہیں فرمایا تاکہ انسان کو اپنی ابتدا کی ابتلا یاد آوے کہ کس طرح شیطان نے اُن کے اَبَوَیْن کو دھوکا دیا تھا اس وقت اس کا نام خنّاس ہی رکھا گیا تھا یہ ترتیب خدا نے اس لئے اختیار فرمائی ہے تاکہ انسان کو پہلے واقعات پر آگاہ کرے کہ جس طرح شیطان نے خدا کی اطاعت سے انسان کو فریب دے کر رُو گرداں کیا ویسے ہی وہ کسی وقت ملکِ وقت کی اطاعت سے بھی عاصی اور رُوگرداں نہ کرادے۔ یوں انسان ہر وقت اپنے نفس کے ارادوں اور منصوبوں کی جانچ پڑتال کرتا رہے کہ مجھ میں ملکِ وقت کی اطاعت کس قدر ہے اور کوشش کرتا رہے اور خدا تعالیٰ سے دعا مانگتا رہے کہ کسی مدخل سے شیطان اُس میں داخل نہ ہو جائے۔ اب اس سورۃ میں جو اطاعت کا حکم ہے وہ خدا تعالیٰ ہی کی اطاعت کا حکم ہے کیونکہ



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 619

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 619

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/619/mode/1up

    619

    اصلی ؔ اطاعت اُسی کی ہے مگر والدین مُرشد و ہادی اور بادشاہِ وقت کی اطاعت کاحکم بھی خدا ہی نے دیا ہے اور اطاعت کا فائدہ یہ ہوگا کہ خنّاس کے قابو سے بچ جاؤگے۔ پس پناہ مانگو کہ خنّاس کی وسوسہ اندازی کے شر سے محفوظ رہو کیونکہ مومن ایک ہی سوراخ سے دو مرتبہ نہیں کاٹا جاتا۔ ایک بار جس راہ سے مصیبت آئے دوبارہ اُس میں نہ پھنسو۔ پس اِس سورۃ میں صریح اشارہ ہے کہ بادشاہ وقت کی اطاعت کرو۔ خنّاس میں خواص اسی طرح ودیعت رکھے گئے ہیں جیسے خدا تعالیٰ نے درخت اور پانی اور آگ وغیرہ چیزوں اور عناصر میں خواص رکھے ہیں۔ عنصر کا لفظ اصل میں عَنْ سِرّ ہے۔ عربی میں ص اور س کا بدل ہو جاتا ہے۔ یعنی یہ چیز اسرار الٰہی میں سے ہے درحقیقت یہاں آکر انسان کی تحقیقات رُک جاتی ہے۔ غرض ہر ایک چیز خدا ہی کی طرف سے ہے خواہ وہ بسائط کی قسم سے ہو خواہ مرکبات کی قسم سے۔ جبکہ یہ بات یہ ہے کہ ایسے بادشاہوں کو بھیج کر اُس نے ہزارہا مشکلات سے ہم کو چھڑایا اور ایسی تبدیلی بخشی کہ ایک آتشی تنور سے نکال کر ایسے باغ میں پہنچا دیاجہاں فرحت افزا پودے ہیں اور ہر طرف ندیاں جاری ہیں اور ٹھنڈی خوشگوار ہوائیں چل رہی ہیں پھر کس قدر ناشکری ہوگی اگرکوئی اس کے احسانات کو فراموش کردے۔ خاص کر ہماری جماعت کو جس کو خدا نے بصیرت دی ہے اور اُن میں فی الحقیقت نفاق نہیں ہے کیونکہ انہوں نے جس سے تعلق پیدا کیاہے اُس میں ذرہ بھر نفاق نہیں شکر گذاری کا بڑا عمدہ نمونہ بننا چاہیئے۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 620

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 620

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/620/mode/1up

    620

    اور ؔ مجھے کامل یقین ہے کہ میری جماعت میں نفاق نہیں ہے اور میرے ساتھ تعلق پیدا کرنے میں اُن کی فراست نے غلطی نہیں کی اس لئے کہ میں درحقیقت وہی ہوں جس کے آنے کو ایمانی فراست نے ملنے پر متوجہ کیاہے اور خدا تعالیٰ گواہ اور آگاہ ہے کہ میں وہی صادق اور امین اور موعود ہوں جس کاوعدہ ہمارے سیّد و مولیٰ صادق و مصدوق رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے دیا گیا تھا اور میں سچ سچ کہتا ہوں کہ جنہوں نے مجھ سے تعلق پیدا نہیں کیا وہ اس نعمت سے محروم ہیں۔ فراست گویا ایک کرامت ہے یہ لفظ فراست بفتح فا بھی ہے اور بکسر فا بھی جب زبر کے ساتھ ہو تو اس کے معنی ہیں گھوڑے پر چڑھنا۔ مومن فراست کے ساتھ اپنے نفس کاچابک سوار ہوتا ہے خدا کی طرف سے اُس کو نور ملتا ہے جس سے وہ راہ پاتا ہے اسی لئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ا تقوا فراسۃ المؤمن فانہ ینظر بنور اللّٰہ ۔ یعنی مومن کی فراست سے ڈرو کیونکہ وہ اللہ کے نور سے دیکھتا ہے۔ غرض ہماری جماعت کی فراست حقّہ کا بڑا ثبوت یہ ہے کہ انہوں نے خدا کے نور کو شناخت کیا۔ اِسی طرح میں اُمید رکھتا ہوں کہ ہماری جماعت عملی حالت میں بھی ترقی کرے گی کیونکہ وہ منافق نہیں ہے اور وہ ہمارے مخالفوں کے اس طرز عمل سے بالکل پاک ہے کہ جب حکاّم سے ملتے ہیں تو اُن کی تعریفیں کرتے ہیں اور جب گھر میں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 621

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 621

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/621/mode/1up

    621

    آتےؔ ہیں تو کافربتلاتے ہیں۔ اے میری جماعت سنو اور یاد رکھو کہ خدا اِس طرز عمل کو پسند نہیں فرماتا۔تم جو میرے ساتھ تعلق رکھتے ہو اور محض خدا کے لئے رکھتے ہو۔ نیکی کرنے والوں کے ساتھ نیکی کرواور بدی کرنے والوں کو معاف کرو۔ کوئی شخص صدیق نہیں ہوسکتا جب تک وہ یک رنگ نہ ہو۔ جو منافقانہ چال چلتا ہے اور دورنگی اختیار کرتا ہے آخر وہ پکڑاجاتا ہے۔ مثل مشہور ہے ۔دروغگو را حافظہ نباشد۔

    اس وقت میں ایک اور ضروری بات کہنی چاہتا ہوں اور وہ یہ ہے کہ سلاطین کو اکثرمہمیں پیش آتی ہیں اوروہ بھی رعایا ہی کے بچاؤ اور حفاظت کے لئے ہوتی ہیں تم نے دیکھا ہے کہ ہماری گورنمنٹ کو سرحد پر کئی بار جنگ کرنی پڑی ہے گو سرحدی لوگ مسلمان ہیں مگر ہمارے نزدیک وہ حق پر نہیں ہیں۔ اُن کا انگریزوں کے ساتھ جنگ کرنا کسی مذہبی حیثیت اور پہلو سے درست نہیں ہے اور نہ وہ حقیقتاً مذہبی پہلو سے لڑتے ہیں کیا وہ یہ عذر کرسکتے ہیں کہ گورنمنٹ نے مسلمانوں کو آزادی نہیں دے رکھی ؟ بے شک دے رکھی ہے ا ور ایسی آزادی دے رکھی ہے جس کی نظیر کابل اورنواح کابل میں رہ کر بھی نہیں مل سکتی۔امیر کے حالات اچھے سننے میں نہیں آتے ان سرحدی مجنونوں کے لڑنے کی کوئی وجہ بجز پیٹ بھرنے کے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 622

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 622

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/622/mode/1up

    622

    نہیں ہے دس بیس روپے مل جائیں تو اُن کا غازی پن غرق ہو جاتاہے یہ لوگ ظالم طبع ہیں اور اسلام کو بدنام کرتے ہیں ۔اِسلام بادشاہِ وقت اور محسن کے حقوق قائم کرتا ہے یہ دنی الطبع لوگ اپنے پیٹ کی خاطر حدود اللہ کو توڑتے ہیں اور اُن کی رذالت اور سفاہت اور سفا کی کا بڑا ثبوت یہ ہے کہ ایک روٹی کے لئے بہ آسانی ایک انسان کا خون کر دیتے ہیں ایسا ہی آجکل ہماری گورنمنٹ کو ٹرینسوال کی ایک چھوٹی سی جمہوری سلطنت کے ساتھ مقابلہ ہے وہ سلطنت پنجاب سے بڑی نہیں ہے اور یہ سراسر اُس کی حماقت ہے کہ اُس نے اس قدر بڑی سلطنت کے ساتھ مقابلہ شروع کیاہے لیکن اس وقت جبکہ مقابلہ شروع ہوگیا ہے ہر ایک مسلمان کاحق ہے کہ انگریزوں کی کامیابی کے لئے دعا کرے۔ ہم کو ٹرنسوال سے کیاغرض جس کے ہزاروں ہم پر احسان ہیں ہمارا فرض ہے کہ اس کی خیرخواہی کریں۔ ایک ہمسایہ کے اتنے حقوق ہیں کہ اُس کی تکلیف سن کر اُس کا پتہّ پانی ہو جاتا ہے تو کیا اب ہمارے دلوں کو سرکار انگلشیہ کے وفادار سپاہیوں کے مصائب پڑھ کر صدمہ نہیں پہنچتا۔ میرے نزدیک وہ بڑا سیاہ دل ہے جسے گورنمنٹ کے دُکھ اپنے دُکھ معلوم نہیں ہوتے۔ یاد رکھو جذام کئی قسم کے ہوتے ہیں ایک جذام جسم کو لگ جاتا ہے جس کو کوڑھ کہتے ہیں اور ایک جذام رُوح کو لگ جاتاہے جس کی وجہ سے اس کو عادت بدہوجاتی ہے۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 623

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 623

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/623/mode/1up

    623

    کہؔ لوگوں کی بدی سے خوش اور بھلائی سے رنج کرتاہے چنانچہ اس قسم کا ہمارے ہاں ایک شخص بازار میں رہا کرتا تھا اگر کوئی مقدمہ کسی پر ہو جاتا تو پوچھا کرتا تھا کہ مقدمہ کی کیا صورت ہے اگر کسی نے کہہ دیا کہ وہ بَری ہوگیا یااچھی صورت ہے تو اُس پر آفت آجاتی اور چپ ہو جاتا اور اگر کوئی کہہ دیتا کہ فرد قرار داد جرم لگ گئی تو بہت خوش ہوتا اور اُس کو پاس بٹھا کر سارا قصّہ سنتا۔ غرض بعض آدمیوں کی فطرت میں بد اندیشی کا مادہ ہوتا ہے کہ وہ بُری خبریں سننا چاہتے ہیں اور لوگوں کی برائی پرخوش ہوتے ہیں کیونکہ شیطان کی سیرت اُن کے اندر ہوتی ہے پس بدخواہی کسی انسان کی بھی اچھی نہیں چہ جائیکہ محسن ہو۔ لہٰذا میں اپنی جماعت کو کہتا ہوں کہ وہ ایسے لوگوں کا نمونہ اختیار نہ کریں بلکہ پوری ہمدردی اور سچی خیر خواہی کے ساتھ برٹش گورنمنٹ کی کامیابی کے لئے دعا کریں اور عملی طور پر بھی وفاداری کے نمونے دکھائیں۔ ہم یہ باتیں کسی صلہ یاانعام کی خاطر نہیں کرتے ہم کو صلہ اور انعام اور دنیوی خطابات سے کیا غرض ۔ ہماری نیّات کو علیم خدا خوب جانتا ہے کہ ہمارا کام محض اُس کے لئے اور اُسی کے امر سے ہے۔ اُسی نے ہم کو تعلیم دی ہے کہ مُحسن کا شکر کرو ہم اِس شکر گذاری میں اپنے مولیٰ کریم کی اطاعت کرتے ہیں اور اُسی سے انعام کی اُمید رکھتے ہیں سو تم جو میری جماعت ہو اپنی مُحسن گورنمنٹ کی خوب قدر کرو۔

    اب میں چاہتا ہوں کہ ٹرنسوال کے جنگ کیلئے ہم دعا کریں ۔ فقط



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 624

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 624

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/624/mode/1up

    624

    اسؔ کے بعد حضرت اقدس نے نہایت جوش اور خلوص کے ساتھ دعا کے لئے ہاتھ اُٹھائے اورسب حاضرین نے جن کی تعداد ایک ہزار سے متجاوز تھی دعا کی اور بہت دیر تک فتح اور کامیابی کے لئے دُعا کی گئی بعد ازاں حضرت اقدس نے تجویز فرمائی کہ زخمیانِ سرکار برطانیہ کے لئے چندہ بھی بھیجنا ضروری ہے جس کے لئے ایک اشتہار بھی شائع کیا گیا جو حسب ذیل ہے۔

    راقم مرزا خدا بخش از قادیان

    اپنی جماعت کے لئے ایک ضروری اشتہار

    3 نَحمدہٗ وَنُصلّی عَلٰی رَسُوْلہ الکریم

    چونکہ مسلمانانِ ہند پر علی العموم اور مسلمانان پنجاب پر بالخصوص گورنمنٹ برطانیہ کے بڑے بڑے احسانات ہیں۔ لہٰذا مسلمان اپنی اِس مہربان گورنمنٹ کاجس قدر شکریہ ادا کریں اتنا ہی تھوڑا ہے کیونکہ مسلمانوں کو ابھی تک وہ زمانہ نہیں بھولا جبکہ وہ سکّھوں کی قوم کے ہاتھوں ایک دہکتے ہوئے تنور میں مبتلا تھے اور اُن کے دستِ تعدّی سے نہ صرف مسلمانوں کی دنیا ہی تباہ تھی بلکہ اُن کے دین کی حالت اس سے بھی بدتر تھی۔ دینی فرائض کا ادا کرنا تو درکنار بعض اذان نمازکہنے پر جان سے مارے جاتے تھے۔ ایسی حالت زار میں اللہ تعالیٰ نے دُور سے اس مبارک گورنمنٹ کو ہماری نجات کے لئے ا برِ رحمت کی طرح بھیج دیا جس نے آن کر نہ صرف ان ظالموں کے پنجہ سے بچایا بلکہ ہر طرح کاامن قائم کرکے ہر قسم کے سامان آسائش مہیّا کئے اور مذہبی آزادی یہاں تک دی کہ ہم بلا دریغ اپنے دین متین کی اشاعت نہایت خوش اسلوبی سے کر سکتے ہیں۔ ہم نے عید الفطر کے موقع پر اس مضمون پر مفصل تقریر کی تھی جس کی مختصر کیفیت تو انگریزی اخباروں میں جاچکی ہے اور باقی مفصل کیفیت عنقریبحبّی فی اللّٰہ مرزا خدا بخش صاحب شائع کرنے والے ہیں ہم نے اس مبارک عید کے موقع پر گورنمنٹ کے احسانات کا ذکر کرکے اپنی جماعت کوجو اس گورنمنٹ سے دِلی اخلاص رکھتی ہے اور دیگر لوگوں کی طرح منافقانہ زندگی



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 625

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 625

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/625/mode/1up

    625

    بسر ؔ کرنا گناہ عظیم سمجھتی ہے توجہ دلائی کہ سب لوگ تہ دل سے اپنی مہربان گورنمنٹ کے لئے دعا کریں کہ اللہ تعالیٰ اس کو اس جنگ میں جو ٹرانسوال میں ہو رہی ہے فتح عظیم بخشے اور نیز یہ بھی کہا کہ حق اللہ کے بعد اسلام کااعظم فرض ہمدردی خلائق ہے اور بالخصوص ایسی مہربان گورنمنٹ کے خادموں سے ہمدردی کرنا کا ر ثواب ہے جو ہماری جانوں اور مالوں اور سب سے بڑھ کر ہمارے دین کی محافظ ہے۔ اس لئے ہماری جماعت کے لوگ جہاں جہاں ہیں اپنی توفیق اورمقدور کے موافق سرکار برطانیہ کے اُن زخمیوں کے واسطے جو جنگ ٹرانسوال میں مجروح ہوئے ہیں چندہ دیں۔ لہٰذا بذریعہ اشتہار ہٰذا اپنی جماعت کے لوگوں کو مطلع کیا جاتا ہے کہ ہر ایک شہر میں فہرست مکمل کرکے اور چندہ کووصول کرکے یکم مارچ سے پہلے مرزا خدا بخش صاحب کے پاس بمقام قادیان بھیج دیں کیونکہ یہ ڈیوٹی ان کے سپرد کی گئی ہے ۔ جب آپ کاروپیہ معہ فہرستوں کے آجائے گا تو اس فہرست چندہ کو اُس رپورٹ میں درج کیاجائے گا جس کا ذکر اُوپر ہوچکا ہے ہماری جماعت اِس کام کو ضروری سمجھ کر بہت جلد اس کی تعمیل کرے۔ وَالسَّلام

    راقم میرزا غلام احمد از قادیان ۔۱۰؍فروری ۱۹۰۰ ؁ء

    خوشخبری

    ۱۰ ؍ فروری کے اشتہار میں یہ خواہش ظاہر کی گئی تھی کہ روئیداد کے ساتھ فہرست اسمائے چندہ دہندگان شائع کی جائے گی لیکن چونکہ روئیداد کی ضخامت بڑھ گئی ہے لہٰذا حضرت امام ہمام ہاد ئ انام مناسب نہیں سمجھتے کہ فہرست شائع کی جائے ۔ بڑی رقوم صرف معدود ے چند اصحاب کی طرف سے موصول ہوئی ہیں اور باقی بہت قلیل رقوم ہیں چنانچہ بڑی سے بڑی رقم 3 کی ہے جو نواب محمد علی خان صاحب رئیس مالیر کوٹلہ کی طرف سے آئی ہے اور چھوٹی سے چھوٹی رقم ۳ پائی تک ہے۔

    چونکہ حضرت اقدس جناب مسیح موعود علیہ الصَّلٰوۃ والسَّلام روپے کے بھیجنے میں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 626

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 626

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/626/mode/1up

    626

    زیادہ ؔ توقف پسند نہیں فرماتے ہیں اس لئے تاریخ مقررہ اشتہار کی انتظار کرکے پانسو روپے کی رقم جناب چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب کی خدمت میں ارسال کردی گئی چنانچہ جو رسید صاحب بہادر موصوف کی طرف سے آئی ہے وہ آگے ہم درج کرتے ہیں۔ لیکن پیشتر اس کے کہ ہم رسید لکھیں اس امر کا ظاہر کر دینا ضروری سمجھتے ہیں کہ حضرت اقدس ان لوگوں پرجنہوں نے اپنی اپنی استطاعت اور حیثیت کے مطابق زخمیان و بیوگان و یتیمان سرکار برطانیہ کی ہمدردی اور امداد کی ہے بہت ہی خوش ہوئے ہیں اور مبارکی ہے اُن لوگوں کو جنہوں نے امامِ برحق کے ارشاد کی تعمیل کرکے نہ صرف اپنے پیر و مرشد کو خوش کیا بلکہ حقیقی مالک الملک اورمجازی حکام کی خوشنودی کے باعث ہوئے کیونکہ زمین وآسمان کے بادشاہ نے اِس کتاب پاک میں جو اہلِ اسلام کے ہاتھ میں ہے حق اللہ کے بعد حق العباد کے ملحوظ رکھنے کا سخت حکم فرمایا ہے اور بنی نوع انسان کی ہمدردی کو اپنی خوشنودی اور رضامندی کا سبب ٹھہرایا ہے خواہ وہ انسان کسی مذہب اور کسی ملّت کا ہو خواہ وہ مشرق کا ہو یا مغرب کا سب کی ہمدردی کا حکم فرمایا ہے اور پھر جو محسن ہو اور ہمارے حقوق کی حفاظت کرتا ہو اُس کی ہمدردی بدرجہ اولیٰ ضروری ہے ۔اس سرکار برطانیہ سے بڑھ کر کون زیادہ محسن اورخیر خواہ ہے جس نے اسلام والوں کی بہت سے موقعوں پر مدد کی ہے اور خطرناک اور جانکاہ مصائب سے نجات دے کر کنارِ امن و عافیت میں جگہ دی ہے۔

    جوچندہ کہ اس غریب جماعت کی طرف سے بھیجا گیا تھا وہ عالی شان گورنمنٹ کے مقابلہ میں ایک نہایت ہی قلیل تھا لیکن اُس عالی حوصلہ گورنمنٹ نے اس کو بڑی عزّت کے ساتھ قبول فرمایا اور مزید براں مسرت بھی ظاہر کی ۔خوش قسمت ہیں وہ لوگ جو حکام وقت کی خوشی اور غمی میں شریک ہوکرمراتب حاکمانہ و محکومانہ کو مدنظر رکھتے ہیں اور کیا ہی بلندحوصلہ اور عالی شان ہے وہ گورنمنٹ جو اپنی رعایا کے غریبانہ چندوں اور مبارک بادیوں کو عظمت اور عزّت کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔ کیا یہ کم قدر افزائی کی بات ہے کہ پانسو کی ذلیل رقم پر جناب نواب لفٹنٹ گورنر صاحب بہادر بالقابہٖ نے خوشنودی کی رسید ار سال فرمائی اورفتوحات افریقہ



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 627

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 627

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/627/mode/1up

    327

    جنوبیؔ پر مبارک بادی کی تار دینے پر جناب امام ہمام ہادی انام کو عالی جناب نواب گورنر جنرل وائسرائے بہادر بالقابہٖ اور جناب لاٹ صاحب پنجاب نے اپنی اپنی چٹھیات میں مسرت ظاہر فرمائی اور شکریہ ادا کیا ہے۔ بہرحال یہ گورنمنٹ قابلِ شکر گذاری ہے خدا تعالیٰ اس گورنمنٹ کو جو امن اورآزادی کی حامی ہے دیرپا رکھے اور اس کو آسمانی بادشاہت سے حصّہ وافر عطافرمائے۔

    اب تینوں چٹھیوں کا ترجمہ ذیل میں درج کرتے ہیں تاکہ ناظرین ان کو پڑھ کر مسرت حاصل کریں۔

    چٹھی نمبر ۲۳۴

    از طرف جے ۔ ایم۔ سی۔ ڈوئی صاحب بہادر آئی۔ سی ۔ ایس قائم مقام چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب۔

    بخدمت مرزا غلام احمد صاحب رئیس قادیان ضلع گورداسپور مورخہ ۲۶؍ مارچ ۹۰۰ ا ؁ء از مقام لاہور ۔

    صاحب من ! نواب لفٹنٹ گورنر صاحب بہادر کی طرف سے ہدایت ہوئی ہے کہ ہم آپ کو اِطلاع دیں کہ جو فیاضانہ عطیہ تعدادی3روپیہ کا آپ کے اور آپ کے مریدوں کی جانب سے سرکار برطانیہ کے جنوبی افریقہ کے بیمار اور زخمی بھائیوں کی امداد کیلئے بھیجا ہے وہ پہنچ گیا ہے اور صاحبان کنگ کنگ کمپنی کو بمبئی میں بھیج دیا گیا ہے۔

    راقم آپ کا نہایت ہی فرمانبردار سروینٹ جے۔ ایم ۔ ڈوئی قائم مقام چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب۔

    چٹھی نمبر ۱۶۶

    مورخہ ۹ ؍ مارچ ۱۹۰۰ ؁ء از مقام لاہور

    ازجانب ڈبلیو۔ آر ۔ ایچ مرک صاحب سی۔ ایس ۔آئی۔ قائم مقام چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب

    بخدمت مرزا غلام احمد صاحب رئیس قادیان ضلع گورداسپور



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 628

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 628

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/628/mode/1up

    628

    صاؔ حب من! مجھے نواب لفٹنٹ گورنر صاحب بہادر کی جانب سے ہدایت ہوئی ہے کہ آپ کو اطلاع دوں کہ وہ آپ کو اس مبارک بادی کے عوض میں جو آپ نے ان فتوحات کی نسبت دی ہے جو سرکار برطانیہ کو جنوبی افریقہ میں نصیب ہوئی ہیں مسرّت آمیز شکریہ ادا کرتے ہیں۔

    آپ کا نہایت ہی فرمانبردار سروینٹ ڈبلیو مرک صاحب قائم مقام چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب

    چٹھی نمبر ۲۱۱

    ازجانب ڈبلیو۔ آر۔ ایچ مرک صاحب بہادر ۔سی ۔ ایس ۔آئی قائم مقام چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب

    بخدمت مرزا غلام احمد صاحب رئیس قادیان ۔ مورخہ ۲۱ ؍ مارچ ۱۹۰۰ ؁ء از مقام لاہور

    صاحب من ! مجھے اِس امر کی ہدایت کی گئی ہے کہ آپ کو اِطلاع دوں کہ گورنمنٹ ہند نے بڑی مسرت کے ساتھ آپ کی مبارک بادی کو جو آپ نے سرکار برطانیہ کی اُن فتوحات پر دی ہے جو جنوبی افریقہ میں سرکار موصوف کو حاصل ہوئی ہیں قبول فرمایا ہے۔

    آپ کا نہایت ہی فرمانبردار سروینٹ ڈبلیو مرک صاحب قائم مقام چیف سیکرٹری گورنمنٹ پنجاب

    ترجمہ چٹھی انگریزی

    نمبر ۳۰۷ مورخہ ۱۸ ؍اپریل ۱۹۰۰ ؁ء

    مرزا غلام احمد صاحب ساکن قادیان ضلع گورداسپور کے پاس رسید بجنسہ بذیل چٹھی دفتر ہذا نمبری ۲۳۴ مورخہ ۲۶؍ مارچ ۱۹۰۰ ؁ء بھیجی جائے

    بحکم صاحب انڈر سکرٹری گورنمنٹ پنجاب دستخط صاحب انڈر سکرٹری

    ترجمہ رسید انگریزی ڈی نمبر۱۴۳۸۔ لارڈ مئر کا فنڈ

    جو ٹرانسوال کی بیواؤں یتیموں اور زخمیوں کی امداد کیلئے قائم کیا گیا ہے۔ از مقام بمبئی مورخہ ۳۱ مارچ ۱۹۰۰ء مرزا غلام احمد ساکن قادیان ضلع گورداسپور اور اس کے مریدوں کی طرف سے ایک رقم تعدادی پانچ سو روپیہ وصول ہوئی۔ چندہ ہذا جو مذکورہ بالا فنڈ کے لئے ہے۔ بسبیل مناسب رائٹ آنریبل لارڈ میئر صاحب بہادر کی خدمت میں مرسل ہو۔

    دستخط خزانچی کنگ کنگ کمپنی

    مرتبہ مرزا خدا بخش از قادیان



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 629

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 629

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/629/mode/1up

    629

    قصیدؔ ہ مولوی عبد اللہ صاحب کشمیری

    حمد بیحد مر جناب حضرت پروردگار

    آنکہ در ہر مظہرے شد حسن رویش آشکار

    برمظاہر از صفات خویشتن پر تو فگند

    بہر تکمیل وجودما بروئے روزگار

    دروجود و در بقاہم در قیام زندگی

    حسب حاجت داد ما را جملہ ساماں بیشمار

    ہرچہ می بایست مارا بہر جسم ونیز جاں

    خود مہیّا کرد از رحمت پأ ما کردگار

    آفتاب و ماہ پرویں ایں زمین و آسماں

    خورد و پوش دل پسندو میوہائے خوشگوار

    ایں ہوائے خوش کہ ہردم می وزد از لطف او

    ایں ہمہ گلزار ولالہ آب ہائے آبشار

    ایں ہمہ از رحمت و از لطف ذات کبریا

    بے عنایا تش زمانہ میشود تاریک و تار

    درحقیقت ہر ثنائے ذاتِ حق رامیسزد

    آنکہ خو بیہائے لطفش ہست بحر بے کنار

    از سرفضل و عنایت حکمت و شان بلند

    در مظاہر جلوہ گرشد رحمتش برروزگار

    از ربوبیت رُخ خود وانمود از مظہرے

    تاکہ گردد بہر جسم و جان ما او فیض بار

    ایں وجود والدیں ظلّے زِ ربّ النّاس ہم

    زیں سبب فرزند را مادر گرفتہ درکنار

    از پأ تکمیل اخلاق بشر نکتہ شنو

    برمظاہر کن نظریاد آر ذات کردگار

    شکر یزدانست شکر مظہر الطاف او

    از سر ایمان من لم یشکر النّاس یاد آر

    گفت حق اے مو مناں باوالدین احساں کنید

    زیں حقیقت رازِ احساں برجہاں شد آشکار

    رہنمائے دین و توحید خدائے لَمْ یَزل

    ازپئے ارواح ماشد مظہر پروردگار

    ایں زماں آں آفتاب از مطلع ہندوستاں

    سربر آوردہ بعالم چوں خورنصف النہار

    چوں زِ من آید ثنائے آں شہ عالی جناب

    من چہ دانم وصفِ حسن رُوئے آں عالی تبار

    سیّد ما رہبر ما پیشوائے ملک دیں

    عاشق رُوئے محمدؐ ہر زماں شوریدہ وار



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 630

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 630

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/630/mode/1up

    630

    می ؔ دمد از رُوئے پاکش بوئے دلدارِ ازل

    از سرگیسوئے مشکینش و زد مُشکِ تتار

    برجہاں رخشید چوں ایں نیرّ عالم فروز

    آبِ حیواں بہر ایماں شد رواں درجوئبار

    از نسیم نورِ ایماں تازہ شد گلزارِ دل

    بردماغِ پاک طبعاں می وزد بادِ بہار

    درگلستانِ محمد نالہ زد ایں عندلیب

    باغ دیں ویران گشتہ بازش آوردہ بہار

    بلبلے در روضۂ قدس است ایں فرخندہ خو

    ازفغانش قدسیاں راچشم دل شد اشکبار

    درمقام قرب یزداں پائے او بالارسید

    ازمئے عشقِ محمد شد ز خود بے اختیار

    حق بنعمت ہائے خویشش درجہاں ممتاز کرد

    شد وجیہ درگہ آں عالم ذوالاقتدار

    در مقامِ قادیان از آسماں آمد فرود

    برزمین مُردہ بارید ایں زماں ابر بہار

    از پئے تصدیق او از آسماں آمد نِدا

    مہر و ماہ ماہِ رمضاں نیز نجمِ تاجدار

    عیسیء فرخ سیر ہم مہدی آخر زماں

    آمدہ از بہرِ تردید خیال کارزار

    ازپئے سرکوبیء ایں غازیان جنگ جو

    آنکہ شد اسلام از کردارِ شاں بس شرمسار

    ایں امامِ وقت آمد تا زِ صدق وراستی

    رازِ ایماں برجہانے می نماید آشکار

    گفت ملک النّاس در قرآں خدائے ذوالمنن

    ایں اشارہ ہست ظاہر بر وجود شہریار

    درجہاں بہر خلائق بادشاہ دادگر

    از عنایاتِ خدا شد ظلّ لطف کردگار

    ہرکہ شکر شاہ عادل رانمی آرد بجا

    منکر آلائے حق باشد ذلیل و نیز خوار

    آں نبی پاکباز و تاجدارِ انبیاء

    عہد کسریٰ را عطا فرمود عزّو افتخار

    نیکوئی بانیکواں فرمودۂ ذاتِ کریم

    بدروی سازوبہ نیکاں بدسگال و بدشعار

    حق شناسی فرض باشد بہر مخلوق خدا

    کافرآلائے حق ماوائے او بئس القرار

    الغرض در عہد پاک ایں شہ ہندوستاں

    آنکہ از احسانِ اوبادِ خزاں راشد بہار

    ہر طرف گسترد ظلِّ معدلت ایں سلطنت

    ایں زماں آمد بدنیا نیز مہدی کامگار

    ہست گورنمنٹ برماسایۂ یزدان پاک

    یاد باید کرد عہد ظالمانِ نابکار



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 631

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 631

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/631/mode/1up

    631

    ہرکہ وارد عہدِ سکّھاں ظلم اوشاں درنظر

    تاچہ میکردند جوروہمستمہا بے شمار

    آفتے برپا ہمی شد ازپئے بانگ نماز

    ازپئے یک گاؤ مردم رابسو زندے بنار

    از تظلم ہائے شاں دنیا شبے تاریک بود

    ناگہاں آمد ز مطلع بادشاہ نور بار

    ایں مبارک سلطنت چوں سایہ ء برمافگند

    ناگہاں از لطفِ حق شدلیل مامثل نہار

    شد مہیا امن و دولت از وجود سلطنت

    از پئے ایماں ز بالا نیز آمد شہسوار

    آں خداوندش پئے اتمام حجت از سما

    داد گنجے از معارف نیز تیغِ آبدار

    از سنان آسماں دجّال اعور را بکشت

    شد مصیرآتھم یک چشم چوں دار البوار

    کشتہ شد از تیغ بُرّاں لیکھرام بدگہر

    آریاں بدسیرزاں روز ازحق شرمسار

    بہر امداد وکیل بدزباں طاقت نہ بود

    در وجود مُردۂ آں ایشر بے اختیار

    ازدرخت روضہ قدس است شاخی ایں جواں

    باغبانش آب دادہ شد درخت میوہ دار

    از حماقت میزند ہرکو کہ برپایش تبر

    پائے خود را بشکند جانش ہمی سوزدبنار

    درجبینش نورحق تابد مدام از راستی

    موئے مشکیں بوئے او شد درجہانے عطربار

    در دِلم جو شد ثنائے آں مہ بدرالدجیٰ

    لیک درگفتن نیاید شرح بحربے کنار

    ایں غلام آں شہِ خوباں کہ نامش مصطفی

    آنکہ از توحید یزداں زد تبر برپائے دار

    کردثابت برجہاں عجز بُت نصرانیاں

    میّتِ دیرینہ روئے خودنمود از خانیار

    عندلیب خوشنوا در روضہ قدس و جلال

    نالہ زن از عشق یزداں آمدہ برشاخسار

    پہلوانِ آسمانی باکمال عزّوشاں

    قدسیاں درخدمت اوبریمین وبریسار

    کارہائے طاقتِ حق از خدائے وا نمود

    بردریدہ پردہائے منکرین جیفہ خوار

    کس بمیدانش نمی آید بروں بہردغا

    دشمناں عوعوکنان وجاگزین درکنج غار

    بردرودیوار عالم سخت لرزہ اوفتاد

    چوں بمیدان وغایک نعرہ زدایں نامدار

    صدر بزم و پیشوا او رہنمائے مؤمنین

    ازپئے تائیددین آمد نشانے استوار



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 632

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- روئدادِ جَلسہ دُعَاء: صفحہ 632

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/632/mode/1up

    632

    ا ؔ ز فیوضِ آسماں آراستہ دارالاماں

    شد منوّر خلق و عالم نیز از گرد و جوار

    از سرصدق وصفا شد خیر خواہ سلطنت

    نے بمکر وچاپلوسی بل بحکم کردگار

    زانکہ فرمودہ است یزداں نیکوئی بانیکواں

    زیں سخن پیچد سرخود جاہل آشفتہ کار

    جاہل مسجد نشیں برما ملامت می کند

    از برائے خیر خواہی با شہان باوقار

    مانمی ترسیم از غوغائے ایں سگ سیرتاں

    از نفاق و بدروی داریم شرم و ننگ و عار

    از خدا خواہیم اقبال شہ ہندوستاں

    باچنیں ناپاک طبعانِ جہاں ما را چہ کار

    یا الٰہ النّاس ہر دم جستہ مے باید پناہ

    از زیان دشمن جانی کہ باشد مثل مار

    اے خدائے ملک و عالم وے پناہ صادقاں

    برزمین راست بازاں ابر رحمت را ببار

    آن خبیثانی کہ پیچید ند از حق روئے خویش

    آتش افشاں برسرشاں بیخ ناپاکاں برآر

    کُن نظر برحال زارم از عنایت ہا نواز

    ازمئے عشق امام عالمم مخمور دار

    آن مسیح قادیانی عاشق خیر الورا

    رحمت حق بر روانش باد اند ر ہر د و دار



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 633

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 633

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/633/mode/1up

    01

    انڈیکس

    روحانی خزائن جلدنمبر۱۵


    مرتبہ: مکرم ظہور الٰہی توقیر صاحب

    زیر نگرانی

    سید عبدالحی

    آیات قرآنیہ ۳

    احادیث نبویہ صلی اللہ علیہ و سلم ۵

    الہامات و رؤیاحضرت مسیح موعود علیہ السلام ۶

    مضامین ۱۱

    اسماء ۳۱

    مقامات ۶۹

    کتابیات ۷۸



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 634

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 634

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/634/mode/1up

    02


    Blank Page




    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 635

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 635

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/635/mode/1up

    03

    آیات قرآنیہ

    الفاتحۃ

    اھدنا الصراط المستقیم۔۔۔ (۶، ۷) ۴۲۳

    البقرۃ

    صم بکم عمی فھم لا یرجعون (۱۹) ۴۶۳ح

    تشابھت قلوبھم (۱۱۹) ۴۷۷ح،۵۴۱

    لا اکراہ فی الدین(۲۵۷) ۱۱، ۱۵۸، ۱۶۷

    ربنا ولا تحملنا ما لا طاقۃ لنا بہ۔۔۔(۲۸۷)

    آل عمران

    وجیھا فی الدنیا والاخرۃ و من المقربین (۴۶) ۵۲،۵۳

    و مطھرک من الذین کفروا۔۔(۵۶) ۵۴،۴۵۲ح،۴۶۰ح ح

    کنتم خیر امۃ اخرجت للناس(ااا) ۴۸۴

    ضربت علیھم الذلۃ ۔۔۔ (۱۱۳) ۵۳۹

    ما محمد الا رسول قد خلت ۔۔۔ (۱۴۵)۵۴۲،۴۶۱ح

    قد خلت من قبلہ الرسل (۱۴۵) ۵۷۲،۵۸۶

    افائن مات او قتل۔۔۔ (۱۴۵) ۵۷۴

    ما محمد الا رسول قد خلت من قبلہ الرسل(۱۴۵) ۵۹۱

    النساء

    فلا و ربک لا یؤمنون حتی یحکموک ۔۔۔۔۔(۶۶)۳۲۰

    ومن یکسب خطیءۃ او اثما ۔۔۔۔(۱۱۳)

    ۳۱۷،۳۱۹،۴۴۱

    وما قتلوہ وما صلبوہ ۔۔۔ (۱۵۸) ۵۱

    لئلا یکون للناس علی اللہ حجۃ (۱۶۶) ۱۷۹

    المائدۃ

    فیھا ھدی و نور(۴۵)

    واللہ یعصمک من الناس (۶۸) ۴۷۶ح

    فلما توفیتنی کنت انت الرقیب علیھم (۱۱۸) ۴۶۱ح

    الانعام

    کتب علی نفسہ الرحمۃ (۱۳) ۳۰۵

    لا تدرکہ الابصار۔۔۔ (۱۰۴) ۴۶۳ح

    الاعراف

    ربنا افتح بیننا و بین قومنا بالحق(۹۰) ۱۷۱

    عذابی اصیب بہ من اشاء ۔۔۔(۱۵۷) ۵۳۷

    التوبۃ

    ان اللہ لا یضیع اجر المحسنین(۱۲۰) (۳۰۲)

    لقد جاء کم رسول من انفسکم (۱۲۸) ۲۸۱

    یونس

    فقد لبثت فیکم عمرًا من قبلہ افلا تعقلون (۱۷) ۲۸۲

    یوسف

    یوسف ایھا الصدیق(۵۰۳ح) ۵۰۳ح

    النحل

    جادلھم بالتی ھی احسن(۱۲۶) ۳۰۵،۳۰۵ح

    بنی اسرائیل

    ما کنّا معذبین حتی نبعث رسولا ( ۱۶) ۳۰۵

    وقضیٰ ربک الا تعبدوا۔۔۔۔(۲۴ ) ۶۰۳

    من کان فی ھذہ اعمٰی۔۔۔ (۷۳) ۴۶۳ح

    قل سبحان ربی ھل کنت الا بشرا رسولا (۹۴) ۵۴۰

    مریم

    و جعلنی مبارکا اینما کنت ۔۔ (۳۲) ۵۴ ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 636

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 636

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/636/mode/1up

    04

    طٰہٰ

    انہ من یات ربہ مجرمًا فان لہ جھنم (۷۵)

    الانبیاء

    فلیاتنا بایۃ کما ارسل الاولون ۔ (۶) ۵۵۸

    قلنا یا نار کونی بردا وسلاما (۷۰) ۴۷۶ح

    المومنون

    سبحان اللہ عما یصفون (۹۲) ۵۵۲

    النور

    و الذین یرمون المحصنات۔۔۔ (۵) ۳۱۸،۴۴۲

    اولٰئک مبرء ون مما یقولون۔ (۲۷) ۳۲۰،۴۴۱

    قل للمؤمنین یغضوا من ابصارھم (۳۱) ۱۶۴

    قل ما یعبؤا بکم لولا دعاء کم (۷۸) ۲۶۴

    الشعراء

    و توکل علی العزیز الرحیم ۔۔۔ (۲۱۸ تا ۲۲۰) ۲۸۱

    الاحزاب

    ان اللہ و ملٰئکتہ یصلون علی النبی ۔ (۵۷) ۱۳۹

    ملعونین اینما ثقفوا اخذوا و قتلوا تقتیلا۔(۶۲) ۲۳۷

    المؤمن

    ان یک کاذبا فعلیہ کذبہ (۲۹) ۳۰۶

    الشوریٰ

    العلیم العظیم(۵) ۵۱۰

    جزاء سیءۃ سیءۃ مثلھا (۶۱) ۱۶۳

    محمد

    لا الٰہ الا اللّٰہ (۲۰) ۵۱۰

    الحجرات

    لا تنابزوا بالالقاب (۱۲) ۵۴۱

    ان اکرمکم عند اللہ اتقاکم (۱۴) ۲۷۷

    الرحمن

    ھل جزاء الاحسان الا الاحسان ( ۶۱) ۶۰۴

    الحدید

    ھو الاول والآخر (۴) ۴۸۴

    الصف

    لیظھرہ علی الدین کلہ (۱۰)

    القیٰمۃ

    الی ربھا ناظرۃ (۲۴) ۴۶۳ح

    الاعلٰی

    ان ھذا لفی الصحف الاولی ۔۔۔(۱۹، ۲۰) ۵۶۱

    الزلزال

    من یعمل مثقال ذرۃ خیرا یرہ (۸،۹) ۳۲۹،۵۵۳

    الاخلاص

    قل ھو اللہ احد ۔ اللہ الصمد ۔۔۔ (۲ تا ۵) ۳۸۶

    الناس

    قل اعوذ برب الناس۔۔۔ (۲تا ۷) ۶۰۲

    من شر الوسواس الخناس(۵)



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 637

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 637

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/637/mode/1up

    05

    احادیث نبویہﷺ

    (بترتیب حروف تہجی )


    اتقوا فراسۃ المؤمن فانہ ینظر بنور اللّٰہ ۶۲۰

    اذا ھلک کسرٰی فلا کسرٰی بعدہ ۔۔ ۳۷۹

    امامکم منکم ۵۶۳

    انما الاعمال بالنیات ۵۶۹

    اوحی اللہ تعالیٰ الی عیسٰی ان یا عیسٰی انتقل من مکان الی مکان لئلا تعرف فتوذی ۵۶

    بسم اللہ الرحمان الرحیم۔ من محمد عبد اللہ و رسولہ الی ھرقل عظیم الروم ۔۔۔۔ ۳۷۲

    ذھب وھلی ۱۵۵

    رحمتی سبقت غضبی ۵۳۷

    عجبنا لہ یسئلہ ویصدقہ ۴۳۰

    عن عبداللہ بن عباس ان ابا بکر خرج وعمر یکلم الناس فقال اجلس یا عمر فابی عمر ۵۷۹

    فان کان ما تقول حقا فسیملک موضع قدمی ۳۷۴

    فخر یخور کما یخور الثور ۳۸۰

    قال احب شیء الی اللہ الغرباء ۔۔۔ ۵۶

    قال عمر بن الخطاب من قال ان محمدا مات فقتلتہ ۵۸۰

    قال لن ارجع الیھم کذابا ۵۳۶

    کان عیسٰی ابن مریم یسیح فاذا امسٰی اکل بقل الصحراء۔۔۔۔ ۵۶

    لا تدخل سکۃ الحرث علی قوم الا اذلھم اللہ ۴۴۹

    لا یدخل ھذا بیت قوم الا دخلہ الذل ۴۴۹

    من عادا ولیا لی فقد اذنتہ للحرب ۴۳۲۔۴۴۳ح

    من محمد عبداللہ ورسلہ الی ھرقل عظیم الروم ۳۷۲

    وعمربن الخطاب یکلم الناس یقول لھم ما مات رسول اللہ ﷺ۔۔۔ولا یموت حتی یقتل المنافقین ۵۸۰

    یضع الحرب ۱۴۴،۱۵۹

    یکسر الصلیب ۵۴۲

    احادیث بالمعنٰی

    مسیح کی عمر ایک سو پچیس برس کی ہوئی ۵۵،۵۴۲،۵۶۳

    حضرت عیسیٰ صلیب کے بعد دوسرے ملک میں چلے گئے ۵۶۳

    عیسیٰ علیہ السلام صلیب سے نجات پا کر ایک سرد ملک کی

    طرف چلے گئے ۵۴۰

    مسیح موعود کے وقت جنگوں کا خاتم ہو جائے گا ۸۷

    مسیح آئے گا اور صلیب کو توڑے گا ۱۴۴

    مسیح کے زمانے میں شیر اور بکری ایک گھاٹ سے پانی پئیں گے ۱۴۵

    مسیح موعود کے عہد میں تمام ملتوں کا ہلاک ہو نا ، اسلام کا غالب آنا ۲۶۸

    مسیح موعود کے زمانہ میں ایک شخص قتل کیا جائے گا ۴۰۲ح آنحضرت ﷺ کا ہرقل کے نام خط ۳۷۲

    مومن ایک ہی سوارخ سے دو مرتبہ نہیں کاٹا جاتا ۶۱۹

    وہ امت ضلالت سے محفوظ ہے جس کے اول میں میرا وجود اور آخر میں مسیح موعود ہے ۴۷۸ح

    مہدی کے دور میں شیطان کا کہنا کہ حق آل عیسیٰ کے ساتھ ہے جبکہ آسمان سے آواز آئے گی کہ حق آل محمد کے ساتھ ہے ۳۶۳،۳۶۳ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 638

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 638

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/638/mode/1up

    06

    الہامات ورؤیا وکشوفحضرت مسیح موعود علیہ السلام

    أتعجبب لأمری ۴۲۵، ۴۲۷

    اجیب کل دعائک الا فی شرکائک ۲۱۰

    اخترتک لنفسی ۲۵۴،۳۱۲

    اذ یمکر بک الذی کفر ۲۹۷

    اردت ان استخلف فخلقت اٰدم ۲۸۷، ۴۷۵

    اشکر نعمتی رئیت خدیجتی۔۔ ۲۸۷، ۲۸۸ح

    اصحاب الصفۃ و ما ادراک ما اصحاب الصفۃ ۲۶۲

    اصبر ملیا ساھب لک غلاما زکیا ۲۱۶

    الفتنۃ ھٰھنا فاصبر کما صبر اولوا العزم ۲۹۷،۳۵۴

    الا ان نصر اللہ قریب ۲۶۸

    الا ان نصر اللہ قریب۔ فی شائل مقیاس ۲۵۷

    الا انما فتنۃ من اللہ لیحب حبّا جمّا ۲۹۷

    الحمد للہ الذی جعل لکم الصھر و النسب

    ۲۷۲،۲۷۶، ۲۸۵

    الرحمان علم القرآن ۲۳۰

    اللہ اکبر۔ خربت خیبر ۲۲۷

    الیس اللہ بکاف عبدہ ۱۹۸

    اوقد لی یا ھامان ۔۔۔۔۔۔ ۲۹۷

    انت اسمی الاعلٰی ۳۱۲

    انت علی بیّنۃ من ربک ۲۶۸

    انت مع الذین اتقوا ۳۱۲

    انت منی بمنزلۃ توحیدی و تفریدی ۲۵۴

    انت وجیہ فی حضرتی ۲۵۴

    ان الذی فرض علیک القرآن لرادک الی معاد۳۴۲

    ان الذین یصدون عن سبیل اللہ سینالھم غضب

    من ربھم ۴۲۵

    ان اللہ مع الذین اتقوا و الذین ھم محسنون ۳۱۲، ۴۲۵

    ان اللہ معک ۲۲۷

    ان اللہ یقوم اینما قمت ۲۲۷

    انّ کیدکنّ عظیم ۲۹۶

    انّ نوری قریب ۲۲۰

    انا اخرجنا لک زروعا یا ابراھیم ۵۰۴ح

    انا تجالدنا فانقطع العدو و اسبابہ ۳۱۲،۳۱۳، ۳۲۷

    انّا کفیناک المستھزئین ۲۶۸

    انّا نبشر بغلامٍ ۲۱۵

    انّا نبشّرک بغلام حسین ۲۰۰

    انک باعیننا سمّیتک المتوکّل۔۔۔۔ ۲۶۸

    انّما امرنا اذا اردنا شیئا۔۔۔ ۳۴۳،۴۲۵

    انہٗ من اٰیۃ اللہ و انہٗ فتح عظیم ۳۱۲

    انی اسقط من اللہ و اصیبہ ۲۱۳، ۲۱۷

    انّی انا الرحمان ذو المجد و العلٰی ۳۴۲،۴۲۵

    انی مع العشاق ۴۲۵

    انی مع الافواج اٰتیک بغتۃ ۳۴۲

    ایھا المرأۃ توبی توبی فان البلاء علی عقبک ۵۵۴

    برّأہ اللہ مما قالوا ۳۵۰

    بکرٌ و ثیب ۲۰۱،۲۸۷

    بلجت آیاتی ۳۴۲

    تبت یدا ابی لھبٍ و تب ۲۹۷

    تری اعینھم تفیض من الدمع یصلون علیک ۲۶۲

    تری فخذًا الیمًا ۱۹۶

    تفردنا بذالک ۲۰۲ح

    جزاء سیءۃ بمثلھا و ترھقھم الذلۃ ۴۲۵

    حبّا من اللہ العزیز الاکرم ۲۹۷

    خذوا التوحید التوحید یا ابناء الفارس ۲۷۳ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 639

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 639

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/639/mode/1up

    07

    خلق آدم فاکرمہ ۴۸۰

    رب اصحّ زوجتی ۲۱۷

    ربنا اننا سمعنا منادیًا یّنادی للایمان۔۔۔۔ ۲۶۲

    ربنا فاکتبنا مع الشاھدین ۲۶۲

    سبحان اللہ تبارک و تعالی زاد مجدک۲۰۲ح،۲۷۵،۲۸۵

    سبحان اللہ و بحمدہ سبحان اللہ العظیم۔۔۔ ۲۰۸

    ستعرف یوم العید و العید اقرب ۳۹۷، ۴۰۵

    ستذکرون ما اقول لکم و افوض امری الی اللہ ۴۱۵

    سلام علی ابراھیم صافیناہ و نجیناہ من الغم ۲۰۲ح

    سلامٌ قولًا من رب رحیم ۳۱۲،۳۲۵

    سیولد لک الولد و یدنی منک الفضل ۲۱۴،۲۱۶، ۲۲۰

    شاھت الوجوہ انہ من اٰیۃ اللہ۔۔۔۔ ۳۱۲،۳۲۹

    ضرب اللہ اشد من ضرب الناس ۴۲۵

    ظلموا و انّ اللہ علٰی نصرھم لقدیر ۲۶۵

    عجل جسد لہ خوار لہ نصب و عذاب

    ۳۱۹،۳۹۸، ۳۹۹،۴۰۴

    عطاءً غیر مجذوذ ۲۹۷

    غیض الماء و قضی الامر ۳۱۲،۳۲۵

    فاتخذوا من مقام ابراھیم مصلی ۲۰۲ح

    فاصبر حتی یأتی اللہ بامرہٖ ۴۲۵

    فاصبر کما صبر اولو العزم ۲۸۴

    فبرّأہ اللہ ممّا قالوا۔۔۔ ۳۴۹

    فبشرنی ربی بموتہ فی ست سنۃ ۳۸۷

    فتبارک من علّم و تعلّم ۲۶۵

    فحان ان تعان و تعرف بین الناس ۲۵۴

    فقد لبثت فیکم عمرًا من قبلہٖ افلا تعقلون ۲۸۳

    قد ابتلی المؤمنون ۳۴۱

    قل اعملوا علٰی مکانتکم انی عامل فسوف تعلمون۲۶۸

    قل ان افتریتہ فعلی اجرامی ۲۶۵

    قل ان کنتم تحبون اللہ فاتبعونی یحببکم اللہ ۲۶۸

    قل انی امرت و انا اول المؤمنین ۳۱۲

    قل جاء الحق و زھق الباطل ۔۔۔ ۲۶۵

    قل عندی شھادۃ من اللہ فھل انتم مسلمون ۲۶۸

    قل عندی شھادۃ من اللہ فھل انتم مومنون۲۶۸،۲۷۱

    قل ھو اللہ احد ۔۔۔ ۳۵۴

    قلنا یا نار کونی بردًا و سلامًا ۱۹۵

    کلّ برکۃ من محمد ﷺ ۲۶۵

    لا تخف انک انت الاعلٰی ۱۹۵

    لا مبدّل لکلمٰت اللہ ۲۶۵

    لا مبدّل لکلمٰت اللہ یتم نعمتہ علیک ۔۔۔۔ ۲۶۸

    لک خطاب العزۃ ۵۰۱

    لواء فتح ۳۴۲

    لیعلمن اللہ المجاھدین منکم ۔۔۔۔۔ ۳۴۱

    ما کان لہٗ ان یدخل فیھا الا خائفا ۲۹۷

    ما لھم من اللہ عاصم ۴۲۵

    ما ھٰذا الا تھدید الحکّام ۳۴۱

    نحمدک و نصلّی ۲۶۸

    نصرت بالرعب و احییت بالصدق ایھا الصدیق ۲۷۵

    نصرت و قالوا لات حین مناصٍ ۲۷۵

    و السماء و الطارق ۱۹۸

    و امتازوا الیوم ایھا المجرمون ۳۰۲

    وامّا نرینّک بعض الذی نعدھم ۲۸۴،۳۵۴

    و ان کنتم فی ریب مما نزلنا علی عبدنا فاتوا

    بشفاء من مثلہ ۲۰۹

    و ان لم یعصمک الناس ۔۔۔۔۔ ۲۹۹،۴۵۲

    و انت معی یا ابراھیم ۳۱۲

    و انت منی بمنزلۃ محبوبین ۳۱۲

    وانہٗ علٰی نصرھم لقدیر ۳۱۲

    و فیہ شیء ۳۴۲

    و قل رب ادخلنی مدخل صدق



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 640

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 640

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/640/mode/1up

    08

    و لن ترضٰی عنک الیھود و لا النصارٰی ۲۸۴،۳۵۴

    وما اصابک فمن اللہ ۲۹۷

    و یخوّفونک من دونہ ۲۶۸

    و یطرح بین یدیّ ۴۲۵

    و یعض الظالم علی یدیہ ۴۲۵

    و یمکرون و یمکر اللہ ۳۵۴

    و ینیر برھانک ۲۲۰

    ویلٌ لھم انی یؤفکون ۳۱۲

    ھذا شاھد نزاغ ۲۵۸،۲۵۹

    ھز الیک بجذع النخلۃ تساقط علیک رطبا جنیا۲۲۸

    ھو الذی ارسل رسولہ بالھدی و دین الحق لیظھرہ

    علی الدین کلہ ۲۳۱،۲۳۲،۲۴۹،۲۶۵

    یا اٰدم اسکن انت و زوجک الجنۃ

    ۲۸۸،۲۸۸ح، ۴۷۵،۴۷۸، ۴۷۹

    یا احمد اسکن انت وزوجک الجنۃ ۲۰۳،۲۸۸ح

    یا احمد فاضت الرحمۃ علی شفتیک ۲۳۰

    یا ارض ابلعی ماء ک ۳۱۲،۳۲۵

    یا عیسٰی انی متوفیک و رافعک الیّ ۔۔۔ ۲۸۴

    یا مریم اسکن انت و زوجک الجنۃ ۲۸۸

    یاتون من کل فجّ عمیق ۲۶۸

    یأتی قمر الانبیاء و امرک یتأتی ۲۲۰

    یاتیک من کل فجّ عمیق ۲۶۸

    یأتیک نصرتی ۳۴۲

    یأتیک نصرتی انی انا الرحمان ۳۱۲،۳۲۵

    یسرک اللہ وجھہٗ ۲۲۰

    یظلّ ربک علیک و یغیثک ویرحمک ۲۹۹

    یعصمک اللہ من عندہ و ان لم یعصمک

    الناس ۲۹۹،۴۵۲

    یعض الظالم علی یدیہ ۴۳۶

    یعض الظالم علی یدیہ و یوثق ۳۱۲،۳۲۷،۴۳۷

    یمکرون و یمکر اللہ و اللہ خیر الماکرین ۲۵۴

    ینصرک اللہ من عندہ ینصرک رجال نوحی الیھم

    من السماء ۲۶۸

    ینقطع اٰباء ک و یبدء منک ۲۰۲ح

    اردو الہامات

    آج حاجی ارباب محمد لشکر خاں کے قرابتی کا روپیہ آتا ہے ۲۵۹

    اس سفر میں کچھ نقصان ہو گا کچھ غم اور ہم پہنچے گا ۲۹۲

    اٹھ کہ میں نے تجھے اس زمانہ میں اسلام کی حجت پوری کرنے کے لئے اور اسلامی سچائیوں کو دنیا میں پھیلانے کے لئے اور ایمان کو زندہ اور قوی کرنے کے لئے چنا ۵۰۷

    اس سفر میں تمہارا اور تمہارے رفیق کا کچھ نقصان ہو گا ۲۹۴

    اس شخص کی سرشت میں نفاق کی رنگ آمیزی ہے ۴۰۹

    اس مقدمہ کی مثل چیف کورٹ سے واپس آئے گی ۔۔۔ ۱۹۴

    ایک عزت کا خطاب ۵۰۱

    بالفعل نہیں ۲۲۸

    پاک محمد ؐ مصطفی نبیوں کا سردار ۲۶۵

    پچاس روپیہ آنے والے ہیں ۲۵۵

    تجھ سے ایک عظیم الشان انسان پیدا ہو گا ۱۵۲

    تجھے ایک بڑا خاندان بناؤں گا ۲ ۱۵ ح

    تُو مجھ سے ایسا ہے جیسا کہ میری توحید اور تفرید ۵۰۷

    تُو میری درگاہ میں وجیہ ہے میں نے اپنے لئے تجھے اختیار کیا۵۰۸

    تُو میری نظر میں منظور ہے میں اپنے عرش پر تیری تعریف کرتا ہوں۵۰۷

    تُو وہ مسیح ہے جس کے وقت کو ضائع نہیں کیا جائے گا ۵۰۷

    تُو ہلاک نہیں ہو گا جب تک کہ راستی کے دلائل کو زمین پر قائم نہ کرے ۔۔۔ ۱۵۲ح

    تیری عزت اور جان سلامت رہے گی اور دشمنوں کے حملے جو اس بدغرض کے لئے ہیں ان سے تجھے بچایا جائے گا ۳۰۹

    تیرے تابعین سے دنیا بھر جائے گی اور وہ ہمیشہ دوسروں پر غالب رہیں گے ۱۵۲ ح

    جناب الٰہی کے احسانات کا دروازہ کھلا ہے ۔۔۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 641

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 641

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/641/mode/1up

    09

    خدا آسمان سے بھی نشان دکھلائے گا اور زمین سے بھی ۳۳۴

    خدا تجھے اس قدر برکت دے گا کہ بادشاہ تیرے کپڑوں سے برکت ڈھونڈیں گے ۱۵۲

    خدا تیرے سب کام درست کر دے گا اور تیری ساری مرادیں تجھے دے گا ۲۶۵

    خدا تین کو چار کرے گا ۲۲۲

    دس دن بعد موج دکھاتا ہوں ۲۵۷

    دنیا میں ایک نذیر آیا ۔۔۔ ۲۷۵،۲۸۴،۲۹۲ح

    دوشنبہ ہے مبارک دوشنبہ ۱۴۶

    دور دور سے لوگ تیرے پاس آئیں گے ۱۵۲

    دیکھ میں تیری دعاؤں کو کیسے جلد قبول کرتا ہوں ۲۹۵

    ڈگری ہو گئی ہے ۲۰۷

    رب الافواج اس طرف توجہ کرے گا ۔۔۔ قرآن شریف خدا

    کی کتاب اور میرے منہ کی باتیں ہیں ۲۶۵

    عبد اللہ خاں ڈیرہ اسماعیل خاں ۲۲۹

    قادر ہے وہ بارگہ جو ٹوٹا کام بناوے

    بنا بنایا توڑ دے کوئی اس کا بھید نہ پاوے ۲۱۲

    لوگوں کے دلوں میں تیری محبت ڈالوں گا ۱۵۲

    ماجھے خان کا بیٹا اور شمس الدین پٹواری ضلع لاہور سے بھیجنے والے ہیں ۲۹۵

    مجھ میں اور تم میں ایک دن میعاد ہے ۲۱۷

    مجھے اس نے رفع مرض کے لئے اپنے الہام سے دوائیں بتلائیں ۲۰۴

    محمد حسین کا منہ بد زبانی سے بند کیا جائے گا ۳۱۱

    محمود ۲۱۴

    مخالفوں کے ہر ایک الزام سے تجھے بری کروں گا ۱۵۲ ح

    میرا یہی مضمون غالب رہے گا ۲۲۴

    مَیں اپنی چمکار دکھلاؤں گا۔ اپنی قدرت نمائی سے تجھ کو اٹھاؤں گا ۲۷۵

    مَیں اپنی چمکار دکھلاؤں گا ۔۔۔ ۲۸۴

    میں تجھے اسّی برس یا چند سال زیادہ یا اس سے کچھ کم عمر دوں گا ۱۵۲ح

    میں تجھے ایک نامور انسان بناؤں گا ۔۔۔ ۱۵۲

    میں نے تجھے اس لئے بھیجا ہے کہ تا اسلام کو تمام قوموں کے آگے روشن کر کے دکھلاؤں۔۔۔ ۵۰۸

    میں نے لوگوں کی دعوت کے لئے تجھے منتخب کیا۔۔۔ ۵۰۷

    وہ دن آتے ہیں کہ خدا تمہاری مدد کرے گا ۔۔۔ ۲۶۶

    یہ وہ مضمون ہے جو سب پر غالب آئے گا ۲۲۶

    انگریزی الہامات

    آئی ایم کو اَرلر ۲۵۸

    دِس اِز مائی اَینیمی ۲۶۵

    د ن ول یو گو ٹو امرتسر ۲۵۷

    فارسی الہامات

    آید آں روزے کہ مستخلص شود ۴۵۱

    اے بسا آرزو کہ خاک شدہ ۲۹۰

    اے فخر رسل قرب تو معلومم شد

    دیر آمدۂ زراہ دور آمدۂ ۲۱۹

    بخرام کہ وقت تُو نزدیک رسید ۔۔۔۔۔۔ ۲۶۵

    صادق آں باشد کہ ایام بلا

    مے گذارد با محبت با وفا ۳۴۱

    گر قضا را عاشقے گردد اسیر

    بوسد آں زنجیر را کز آشنا ۳۴۲

    ہر چہ باید نو عروسے راہمہ ساماں کنم ۲۰۲

    رؤیا وکشوف

    حضرت اقدسؑ کا کشفاً مسیحؑ کو اور بیداری میں نبیوں کو دیکھنا ۳۶

    بشمبر داس کی نسبت دیکھا کہ مَیں نے نوشتۂ قضا ء قدر کی نصف قید کو اپنے قلم سے کاٹ دیا مگر بری نہیں کیا ۱۵۷ ح

    نواب سردار محمد حیات خاں کی نسبت دو خواب ۱۹۲

    بشمبر داس کی قید نصف کئے جانے کی نسبت کشف ۱۹۴

    کشفی طور پر خد ا تعالیٰ کو متمثل دیکھنا ۱۹۷

    مَیں نے دیکھا کہ میرا سر حضرت فاطمہؓ نے مادرِ مہربان کی طرح اپنی ران پر رکھا ہوا ہے ۲۰۲ ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 642

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 642

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/642/mode/1up

    10

    کشفاً دیکھنا کہ ایک فرشتہ آپ کے منہ میں دوائی ڈال رہا ہے ۶۰۴

    خواب میں دیکھنا کہ جھنڈا سنگھ دخیلکار پر ہماری ڈگری ہوئی ہے اور اسے کچھ جرمانہ ہوا ہے ۲۰۶

    بیماری کی حالت میں خدا کا دل میں الہام کرنا کہ دریا کے پانی کے ساتھ جس میں ریت ہو اسے الہامی دعا کے ساتھ پڑھ کر جسم پر مل ۲۰۹،۲۰۸

    خواب میں دیکھنا کہ ہمارے فوت شدہ عزیزوں میں سے ایک بزرگ میرے بھائی کو اپنی طرف بلاتے ہیں ۲۱۰

    خواب میں مرزا غلام قادر مرحوم کو بیمار دیکھنا ۲۱۰

    خواب میں حضرت حکیم مولوی نور الدینؓ صاحب کی گود میں ایک کھیلتا ہوا لڑکا دیکھنا ۲۱۳

    حضرت مرزا بشیر الدین محمود احمد صاحب کی پیدائش کے متعلق کشف ۲۱۴

    مولوی عبد اللہ غزنوی کی وفات کے بعد انہیں خواب میں دیکھنا اور ان کے پاس اپنی رؤیا بیان کرنا جس میں آپ کے ہاتھ میں ایک نہایت روشن تلوار ہے ۲۵۳

    کشفاً آپ کا ایک خط دیکھنا جس پر انگریزی میں آئی ایم کو اَرلر لکھا تھا ۔۔۔ ۲۵۸

    خواب میں دیکھنا کہ نواب اقبال الدولہ صاحب کی طرف سے خط اور روپیہ آیا ہے ۲۶۰

    چبوترہ پر بیٹھے خوبصورت لڑکے کا آپ ؑ کو تازہ نان دینے والی رؤیا ۲۶۱

    مسیح موعود ؑ کا کشفاً میاں نجف علی کو آپ کی نسبت مخالفت اور نفاق کی باتیں کرتے دیکھنا ۲۶۳

    خواب میں دیکھنا کہ ایک لمبی نالی جو کئی کوس تک جاتی ہے اس پر ہزاروں بھیڑیں لٹائی ہوئی ہیں ۲۶۳

    آپ کو کشفی طور پر ۴۴ یا ۴۶ روپیہ دکھلایا جانا ۲۹۵

    کشفاً دیکھنا کہ مسلمانوں میں سے ایک شخص میری تکفیر کا فتویٰ لکھ کر ملک میں فتنہ پھیلائے گا ۲۹۷

    ایک ہندو تحصیلدار بٹالہ جس کے پاس مقدمہ ٹیکس تھا بدل گیا اور اس کے عوض میں ایک اور شخص کرسی پر بیٹھے دیکھا جو مسلمان تھا ۳۲۰

    رؤیا میں ایک انگریز حاکم کے پاس جانا۔ اس نے والد کا نام پوچھا لیکن مطابق دستور قسم دلانا بھول گیا اور بالکل ایسا ہی واقع ہونا ۳۳۱

    خواب میں دیکھا کہ ایک صاعقہ مغرب کی طرف سے میرے مکان کی طرف چلی آتی ہے ۳۴۱

    میں ایک جگہ چارپائی پر بیٹھا ہوں اور اس پر میرے بائیں طرف مولوی عبداللہ مرحوم بیٹھے ہیں ۳۵۱

    ایک فرشتہ جس کا نام شیر علی ہے اس نے کشف میں میری آنکھوں کو صاف کیا اور ایک چمکتے ہوئے ستارے کی طرح بنا دیا ۳۵۲

    دیکھا کہ میرے ہاتھ میں نہایت چمکیلی اور روشن تلوار ہے۳۵۳

    کشفی حالت میں ایک نئی خلقت اور شمائل کا شخص گویا انسان نہیں ملائک شداد غلاظ میں سے ہے ، دیکھنا اور اس کا کہنالیکھرام کہاں ہے؟ ۳۹۴

    سلطان روم اور اس کے ارکان کے متعلق کشف ۴۰۸

    خدا نے القا کیا کہ رومی سلطنت انہی لوگوں کی شامت اعمال سے خطرہ میں ہے ۴۰۸

    حسین کامی کی نسبت الہام کہ یہ آدمی سلطنت کے ساتھ دیانت سے تعلق نہیں رکھتا بلکہ اس کی سرشت میں نفاق کی رنگ آمیزی ہے ۴۱۰

    کشف میں دیکھا کہ مرزا ابراہیم بیگ میرے پاس بیٹھا ہے اور کہتا ہے مجھے بہشت سے سلام پہنچا دو ۴۱۶

    سید احمد خان کو کشف میں تکالیف میں مبتلا ہو کر فوت ہوتا دیکھنا ۴۶۵

    خواب میں مفتی محمد صادق صاحب کا روشن چہرہ اور ایک فاخرہ لباس پہنے ہوئے دیکھنا ۵۰۵

    خواب میں دکھائی دیا کہ ایک لڑکا ہے جس کا نام عزیز ہے اور اس کے باپ کے نام پر سلطان کا لفظ ہے۔۔۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 643

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 643

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/643/mode/1up

    11

    مضامین

    آ،ا

    آل

    آل عیسیٰ و آل محمدؐ سے مراد ۳۶۳ح

    جسمانی طور پر آل کی کچھ بھی حقیقت نہیں ۳۶۵ح

    اجتہاد

    اجتہادی غلطی ہونا سنت انبیاء ہے ۲۹۰ح

    اجتہادی غلطی نبیوں اور رسولوں سے بھی ہوجاتی ہے ۱۵۵

    مسیح موعود ؑ کا اجتہادی طور پر اپنا کوئی خیال ظاہر کرنا حجت نہیں ہو سکتا ۲۹۱ح

    اجماع

    حضرت مسیح کی موت کے متعلق صحابہؓ کا اجماع ۵۷۷تا ۵۹۲

    اجماع صحابہ بروفات مسیح ناصری والی حدیث کا متن ۵۷۹

    صحابہ کا اجماع حجت ہے جو کبھی ضلالت پر نہیں ہوتا۴۶۱ح

    احسان

    خدا کا بندے پر احسان ۶۰۰،۶۰۱

    انسان کا احسان کسی مقصد اور اغراض کی وجہ سے ہوتا ہے ۵۹۸

    محسن کا شکریہ ادا کرنے کی تعلیم ۶۲۴

    احمدیت

    نبیوں کی کتابوں میں اس مبارک فرقہ کی خبر دی گئی ۵۲۸

    اس سلسلہ کا موزوں نام ’’ مسلمان فرقہ احمدیہ‘‘ہے ۵۲۶

    اس فرقہ کا یہ نام رکھنے کی وجہ ۵۲۷

    اس سلسلہ کے ماننے والوں کے لئے اصول ۵۲۴

    بیعت سے غرض ۵۲۵

    اس میں فی الحقیقت نفاق نہیں ہے ۶۱۹

    اس فرقہ کو ماننے والوں کی خصوصیات ۵۲۶

    ہمارا تعلق دینی اور روحانی باتوں سے ہے ۶۱۲

    یہ فرقہ دنیا میں آشتی اور صلح پھیلانے کے لئے آیا ہے ۵۲۷

    خدا کا اس گروہ کو ترقی دینا اور دس ہزار تک تعداد کا پہنچنا ۶۰۱

    میں دیکھتا ہوں کہ دس ہزار یا اس سے بھی زیادہ لوگ میری پاک تعلیموں کے دل سے پابند ہیں ۴۹۳

    اس فرقہ کے ماننے والوں کی تعدادتیس ہزار ہو چکی ہے ۵۲۶

    کہیں لکھا تھا کہ تعداد تین سو ہے اب میری جماعت دس ہزار سے بھی زیادہ ہو گئی ۴۹۳ح

    تین سال کے عرصہ میں ایک لاکھ تعداد ہونے کی پیشگوئی۴۹۳ح

    تمام روئے زمین کے مسلمانوں کے اس فرقہ میں شامل ہونے کی دعا ۵۲۸

    ہمارے سلسلہ کے لئے مجھے وہ فتوحات ہوئیں کہ اگر میں چاہتا تو ان سے غزنی کا بڑا حصہ خرید سکتا ۵۴۷

    میری جماعت کے ایک ہزار متدین نیک چلن قرآن ہاتھ میں لے کر نشان دیکھنے کا ثبوت دے سکتے ہیں ۳۳۴

    اگر تم دکھ دو گے تو وہ تمہارے باپ اور مرشد تک پہنچے گا ۵۵۸

    میرا گروہ ایک سچا خیر خواہ گورنمنٹ کا بن گیا ہے ۱۲۳

    گورنمنٹ وقت کی وفادار جماعت ۵۹۴

    اسلام میں فرقہ احمدیہ کا منفرد مقام ۲۷۱

    جماعت کو مخالفتوں پر صبر کی نصیحت ۵۱۳

    درویشان جماعت کی ہجرت اور قربانیوں کا ذکر اور ان کے متعلق الہام ۲۶۱،۲۶۲

    جماعت احمدیہ گورنمنٹ برطانیہ کی وفادار ہے ۵۹۴

    دنیاوی عزت کی وجہ سے سید احمدخان نے اس سلسلہ کو ذرہ عظمت کی نظر سے نہ دیکھا ۴۶۷

    حضرت اقدسؑ کی جماعت کو نصائح ۶۲۱

    اپنی جماعت کے لئے ایک ضروری اشتہار ۶۲۴



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 644

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 644

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/644/mode/1up

    12

    ٹرانسوال کی جنگ کے لئے جماعت کو چندہ کی تحریک ۶۲۴

    اسلام

    اسلام کے معنی ۳۷۲

    آغاز اسلام میں ہر قوم کی جانب سے مزاحمت اور اس کا سبب ۱۰،۱۱

    اب زمین پر سچا مذہب صرف اسلام ہے ۱۴۱،۴۹۷

    اسلام تمام دینوں پر ہر برکت ،دقیقہ معرفت اور آسمانی نشانوں میں غالب ہے ۲۶۶

    اسلام کی دوبارہ زندگی انگریزی سلطنت کے امن بخش سایہ سے پیدا ہوئی ہے ۱۵۶

    اسلام میں اب بھی صاحب خوارق اور نشان موجود ہیں اور دوسری قوموں میں نہیں ۳۷۱

    صرف ایک اسلام ہے جس کی پیروی سے انسان کو خدا تعالی کا قرب میسر آتا ہے ۲۳۵

    قوموں کی حقیقت اور اسلام میں ذات پات اور قومی تفریق مٹا دینے کا الہٰی قانون ۲۷۸

    اسلام کے بادشاہوں کا طب کو ترقی دینا اور تراجم کروانا ۶۰

    کلمہ طیبہ کے سکھلائے جانے کا مقصد ۶۵

    اس اعتراض کا رد کہ اسلام تلوار سے پھیلا ہے نہ آسمانی نشانوں سے ۱۴۵

    تمام سچے مسلمانوں کا عقیدہ کہ اسلام تلوار کی بجائے ہمیشہ ذاتی خوبیوں کی وجہ سے دنیا میں پھیلا ہے ۱۶۷ح

    اسلام میں بنی اسرائیل کے لئے وعدہ تک کہ اگر تم آخری نبی پر ایمان لاؤ گے تو تمہیں حکومت اور بادشاہت ملے گی چنانچہ اسلام قبول کرنے کے بعد ملی ۶۹ح

    ممکن نہیں کہ قرانی تعلیم کے برخلاف کوئی دنیا میں آوے جو تلوار کے ساتھ لوگوں کو مسلمان کرے ۱۲

    پوری آزادی سے اسی وقت ہی عبادات بجا لاسکتے ہیں جب چار شرائط موجود ہوں ۶۱۳تا ۶۲۱

    اسلام بادشاہ وقت اور محسن کے حقوق قائم کرتا ہے ۶۲۲

    اسلام نے کبھی جبر کا مسئلہ نہیں سکھایا ۱۱

    اس خیال کا ردّ کہ نبی کریم ؐ یا صحابہ نے دین پھیلانے کے لئے کبھی لڑائی کی یا جبراً اسلام میں داخل کیا ۱۰

    ممکن نہیں کہ قرانی تعلیم کے برخلاف کوئی دنیا میں آوے جو تلوار کے ساتھ لوگوں کو مسلمان کرے ۱۲

    زبردستی مذہب میں داخل کرنا قرآن کی تعلیم نہیں ۱۵۶

    اب وہ زمانہ قریب آتا جاتا ہے کہ راستی کے بھوکے پیاسے اسلام میں جبر کے بہتانوں کی حقیقت پر مطلع ہو جائیں گے ۱۱

    صحابہ کا سچے ایمانداروں کی طرح صدق دکھلانا اور آنحضرتؐ سے وفا داری جبر کا نتیجہ نہیں ہو سکتا ۱۲

    جبر و اکراہ اور قتل کی دھمکی سے کسی کو اپنے دین میں داخل کرنا سخت ناپسندیدہ طریق ہے ۸

    نبی ﷺ نے مسلمان بنانے کے لئے کبھی جبر نہیں کیا ۲۴۶

    اشتہارات

    یکم فروری ۱۸۸۶ء ۲۸۹ح

    ۲۰ فروری ۱۸۸۶ء ۱۵۱،۲۱۸

    ۷ اگست ۱۸۸۷ء ۲۸۹ح، ۲۹۰ح، ۲۹۱ح

    ۱۰ جولائی ۱۸۸۸ء ۲۱۹

    اشتہار ۲۱ دسمبر ۱۸۹۶ء ’’مضمون بالا رہے گا،، کی پیشگوئی۱۵۱، ۲۲۶

    محمود( حضرت مرزا بشیر الدین محمود احمدصاحب) کی ولادت کے بارے میں ۲۱۹

    اشتہار ۲۰ فروری ۱۸۹۷ء میں سید احمد خان کے متعلق پیشگوئی۴۶۴

    اشتہار ۱۲ مارچ ۱۸۹۷ء میں مذکور سید احمد خان کے متعلق پیشگوئی ۴۶۴

    اس اشتہار کی میعاد میں چوتھے لڑکے کی پیدائش اور عبدالحق غزنوی کے نہ مرنے کی پیشگوئی کا پورا ہونا ۴۴۴

    اشتہار مؤرخہ ۳۰ نومبر ۱۸۹۸ء سے متعلقہ حاشیہ ۴۲۸

    ایک الہامی پیشگوئی کا اشتہار ۵۰۱

    اپنی جماعت کے لیے ایک ضروری اشتہار ۶۲۴

    اللہ تعالیٰ

    خدا کے بارے میں مختلف قسم کے لوگ ۴۲۲ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 645

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 645

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/645/mode/1up

    13

    اجرام کی کرویت سے توحید کا ثبوت ۱۳،۱۴

    اجسام کے کروی ہونے سے خدا کی ذات میں کرویت کی طرح وحدت اور یک بینی کا ثبوت ۱۴،۱۳

    اکثر حصہ ہندوستان کا ایسے تاریک دلوں کے ساتھ پُر ہے جن کو خبر نہیں کہ خدا بھی ہے ۴۷۱

    قوت ایمانی کی وجہ سے جوخدا کا مشاہدہ کرے وہ شہید ہے ۴۲۱

    انسان اپنی قوت ایمانی سے خدا اور روز جرزا پر یقین کر لیتا ہے ۴۲۰

    سچا خدا وہی ہے جو قرآن نے بیان کیا ہے ۱۴۱

    خدا کو گالیاں دینا اور ظالم اور ناقدر شناس سمجھنا ۴۲۲ح

    اگر کوئی خدا کی سنت قدیم کے مخالف دیکھنا چاہے تو اس کا اس نعمت سے کچھ حصہ نہیں وہ ابوجہل کی طرح محروم مرے گا ۵۵۹

    اللہ کی اس عادت کا ثبوت کہ وہ نرم کے ساتھ نرم اور سخت کے ساتھ سخت سلوک کرتا ہے ۱۵۱

    دوا کے اجزاء کا بندوبست بھی خدا نے کیا ہے ۶۰۱

    انسان کی کوتہ اندیشیوں نے ہزاروں چیزوں کو خدا بنا ڈالا ہے

    خدا کو سب سے پیارے غریب ہیں ۵۶

    خدا کی ہستی کا ثبوت آئندہ کی زمانہ کی خبروں کے بتانے کے حوالے سے ۱۴۳

    خدا کے وجود پر توریت، انجیل اور قرآن متفق ہیں ۵۲۴

    اللہ کی اولیت اور آخریت کے مظہر وجود ۴۸۴

    خدا کے سارے کام نظیر رکھتے ہیں تا انسانوں کے لئے تکلیف مالا یطاق نہ ہو ۴۶۲ح

    اگر بادشاہ وقت نیک اور رعایا پر ور ہو تو آسمان پر اس کی مدد کے لئے رحمت الٰہی جوش مارتی ہے ۱۱۷

    ہر ایک چیز خدا ہی کی طرف سے ہے ۶۱۹

    سچی توحید کیا ہے ؟ ۶۱۸

    خدا کا قانون قدرت کہ وہ توحید کی ہمیشہ حمایت کرتا ہے ۶۵

    سورۃ الناس میں اصل توحید کو قائم رکھا گیا ہے ۶۰۲

    خد ا تعالیٰ کی محبت حقیقی ہے ۶۰۳

    اللہ تعالیٰ اپنے مقتدر نشانوں اور معجزات سے اناالموجود کہتا ہے ۶۱۴،۶۱۵

    اللہ تعالیٰ کے تمام محامد کے مستحق ہونے کی چار وجوہات

    ۱۔ صفت خلق اور پرورش

    ۲۔ قبل از پیدائش تمدنی زندگی اور قویٰ کے کام کے سامانوں کی فراہمی

    ۳۔انسان کی تکمیل کے لئے ضروری قویٰ کی فراہمی

    ۴۔ پاداشِ محنت جس کے لئے اللہ کا فضل درکار ہے ۵۹۸

    سور ۃ الناس میں اصل توحید کو قائم رکھا گیا ہے ۶۰۲

    انسان کو قویٰ سے کام لینے کے لیے ضروری سامان اس کو پہلے سے مہیا کردے گئے ۶۰۰،۶۱۱

    محنت کی پاداش کے لیے خد کا فضل درکار ہے ۶۰۱

    خدا تعالیٰ نے کوئی چیز بھی غیر مفید پیدا نہیں کی ۶۰۱

    اللہ کی محبت حقیقی ہے ۶۰۳

    مخلوق کو محض ربوبیت کے تقاضہ سے پیدا کیا ۵۹۹

    ظلی طور پر ربوبیت کے روحانی مظہر ۶۰۲،۶۰۳

    رب العالمین کا مظہر بننے کے لئے ضروری امر ۵۱۸

    اللہ تعالیٰ کی رحمانیت اور رحیمیت کا ذکر ۵۱۸

    توانا اور سب قوتوں کا مالک ۵۱۰

    ابدالآباد تک اللہ کا نام مبارک ہے ۵۰۷

    خداتعالیٰ بڑا رحیم و کریم ہے وہ انسان کو جلد نہیں پکڑتا ۴۳۳ح

    رحمت الٰہی کا غضب پر سبقت لے جانا ۵۳۷

    الٰہام

    کسی الہام میں الٰہی شوکت کا ہونا اور اس سے مراد ۱۷۱

    الہام شیطانی بھی ہوا کرتے ہیں ۱۷۰

    ملہمین کا اپنے اجتہاد سے الہام کے معنی کرنا ۵۰۳ح

    امت محمدیہ

    آنحضرت ﷺ نے فرمایا ہے کہ جس امت کے اول میں میرا وجود اور آخر میں مسیح موعود ہے وہ ضلالت سے محفوظ ہے۴۷۸ح

    قرآن میں اس امت کے اشرار کی یہود سے نسبت ۴۸۴

    انسان

    انسان کی کوتہ اندیشیوں نے ہزاروں چیزوں کو خدا بنا ڈالا ہے

    بوجہ اپنی انسانیت کے انسان کسی نہ کسی نقص سے خالی نہیں ہوتا۵۵۷



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 646

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 646

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/646/mode/1up

    14

    انسان جب امانت سے بات نہیں کرتا تو اس وقت شیطان کا محکوم ہوتا ہے ۵۶۱

    شریر انسان انبیاء اور اولیاء کے نیک نمونوں کو نہیں دیکھتا اور بدی کی تلاش میں رہتا ہے ۴۲۵ح

    متعصب انسان کی عادت ۱۴۷

    انسان جب ایک عقیدہ پر قائم ہوجائے تو پھر گوکیسی ہی خرابی اس عقیدہ کی کھل جائے اسے چھوڑنا نہیں چاہتا ۱۸

    دنیادار لوگوں کی صدمہ کے وقت حالت ۴۶۵

    ایک دنیا دار شخص میں دو قسم کی کمزوریوں کا ہونا ۴۶۸

    بھوک اور پیاس ایک درد ہے جسکے حد سے زیادہ ہونے سے انسان مر سکتا ہے ۲۶

    انسان کو قویٰ سے کام لینے کے لیے ضروری سامان پہلے سے مہیا کردیے گئے ہیں ۶۰۰،۶۱۱

    محنت کی پاداش کے لیے خدا کا فضل درکار ہے ۶۰۱

    نوع انسان میں سے بعض کا بعض کی خو پر آنا سنت ہے ۴۷۵

    شیطان نے انسان کو خدا کی اطاعت سے روگرداں کیا ۶۱۸

    خدا نے مخلوق کو محض ربوبیت کے تقاضہ سے پیدا کیا ہے۵۹۹

    بعض لوگ دوسروں کی برائی پر خوش ہوتے ہیں ۶۲۳

    انگریزی سلطنت

    احادیث سے انگریزی سلطنت کی تعریف نکلتی ہے ۱۴۵

    یہ امن جو اس سلطنت کے زیر سایہ حاصل ہے نہ یہ مکہ میں مل سکتا ہے نہ مدینہ میں نہ قسطنطنیہ میں ۱۵۶،۶۱۶

    قانوں سڈیشن کے ذریعہ گورنمنٹ انگریزی کا قوموں کے اتفاق کی طرف توجہ کا اظہار ہونا ۱۲۴

    گورنمنٹ کی خدمت اسی طرح کی کہ پچاس ہزار کے قریب کتابیں ،رسائل ،اشتہارات شائع کروائے ۱۱۷

    تحفہ قیصریہ میں گورنمنٹ کے حقوق کا ذکر ۱۱۱

    ان کے دور میں خدا کا اپنا ایک مامور بھیجنا ۶۱۵

    مذہبی مکانات کی تعظیم و تکریم اپنے فرائض میں سے سمجھنا ۶۰۶

    ان کی مذہبی آزادی دینے کے حوالے سے چند واقعات ۶۰۸

    فرائض مذہب ادا کرنے کی مکمل آزادی دینا ۶۱۲

    مذہبی کتابوں کے حصول کے لئے پریس اور ڈاکخانہ جات سے مدد ملنا ۶۱۵

    ان کا قدم رحمت و برکت کا قدم ہے ۶۰۸

    جماعت احمدیہ گورنمنٹ برطانیہ کی وفادار ہے ۵۹۴

    صحت کے قائم رکھنے کے لئے ہر قسم کی ضروری امداد دینا ۶۱۳

    ہر قسم کے تغذیہ کے سامان مہیا کرنا ۶۰۷

    گورنمنٹ کا تجارت کو فروغ دینا ۶۱۶

    ایک چھوٹی سی جمہوریت ٹرانسوال کا انگریزی حکومت سے جنگ کرنا ۶۲۲

    ٹرانسوال کی جنگ میں زخمی ہونے والوں کے لئے چندہ کی تحریک ۶۲۴

    حضرت اقدسؑ نے جنگ ٹرانسوال کے لئے حکومت کو چندہ کی رقم بھجوائی تو ان چار چٹھیوں کا ذکر جن میں حکومت نے آپؑ کا شکریہ ادا کیا ۶۲۷

    عید کے روز قادیان کے ایک وسیع میدان میں ان کی کامیابی کے لئے اجتماعی دعا ۵۹۶

    رومی سلطنت سے مشابہت ۵۲۰،۵۲۴

    انصاف پسندی اور داد گستری عدل پسندی کا ذکر ۴۸۷

    اہل بیت

    نبی کریمؐ کی آل ہونے سے مراد ۳۶۵ح

    اہل حدیث

    برٹش انڈیا میں اہل حدیث کے بعض فرقوں کا گورنمنٹ انگریزی کے ماتحت دو رویہ طرز کی زندگی بسر کرنے کی وجہ ۹

    ان کے خونی مہدی اور خونی مسیح کے عقیدہ کا مسلمانوں پر بد اثر۷،۸

    ان کے نزدیک حضرت عیسیٰ ؑ کی دوبارہ آمد کا مقصد ۶

    ایمان

    عبادات بجا لانے کے لئے ایک ضروری شرط ۶۱۴

    اولیاء کے انکار کرنے والوں کے ایمان کا سلب ہونا۴۳۲ح،۴۳۴ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 647

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 647

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/647/mode/1up

    15

    ب

    بت پرستی

    بت پرستوں کی قوم باوجود قابل شرم عقیدوں کے اب تک دنیا میں جا بجا پائی جاتی ہے ۱۶۷

    بلیوں اور سانپوں کو بھی پوجا گیا ہے ۲۴

    بدھ مت

    حضرت مسیح کے ذریعہ سے بدھ کے پیرو کاروں کی ہدایت کے لئے دو طرح کے اسباب پیدا کیا جانا ۳۲

    مشرق کی طرف جلاوطن یہود میں سے اکثرکا بدھ مذہب میں داخل ہونا ۱۷

    بدھ مذہب کی کتابوں میں بگوا متیا کی پیشگوئی کا مسیح کے لفظ سے ذکر ۸۴،۸۵

    ان کی رحمدلی کا ذکر ۴

    جو محققین اس بات کی تفتیش میں ہیں کہ کسی طرح معلوم ہو جائے کہ بدھ مذہب مسیح کے زمانہ میں فلسطین پہنچ گیا تھا وہ ناکام ہوں گے ۸۶

    بدھ مذہب سے مراد ان مقامات کا مذہب ہے جو تبت کی حدود یعنی لیہ ،لاسہ، گلگت اور ہمس وغیرہ میں پایا جاتا ہے ۷۲

    بدھ مذہب میں انجیلی تعلیمات کے ہونے کی وجہ ۷۸

    بدھ مذہب کی کتابوں میں مسیح کے بدھ کے مرید کے طور پر ذکر کی وجہ ۸۶

    بدھ مت اور انجیلی تعلیم میں مشابہت ۷۷تا۷۹

    بروز

    حضرت عیسیٰ کو زندہ سمجھنے سے مسئلہ بروز کا انکار لازم آتاہے۴۸۱

    نیکوں اور بدوں کے بروز آتے رہتے ہیں ۴۸۴

    بریت

    انگریزی زبان میں کسی کو جرم سے بری سمجھنے یا کرنے کے لئے دو لفظوں ڈسچارج اور ایکوِٹ استعمال کئے جاتے ہیں۔ ان دونوں کے استعمال کے مواقع کا ذکر ۴۴۰

    عربی زبان میں بریّت کا مفہوم ۴۴۰

    قرآن کریم میں بریّت کے لئے دو لفظوں کا استعمال ۴۴۱

    بَرِیّ لفظ کی تشریح ۳۱۵تا۳۳۰

    قرآن میں لفط بَرِیّ کے معنی ۳۱۷،۳۱۸

    قرآن کریم میں لفظ بَرِیّ کے معنے ۳۲۲،ح

    لفظ بَرِیّ اورمُبَرّء میں فرق ۳۱۷تا۳۲۴

    بَرِیّکے لفظ پر اعتراض اور اس کا جواب ۳۱۵تا۳۳۰

    عورتوں پر ناپاک تہمت لگانے والوں کی سزا اور عورتوں کی بریّت ۴۴۲

    بنی اسرائیل

    بنی اسرائیل کے لئے وعدہ ہے کہ اگر تم آخری نبی پر ایمان لاؤ گے تو تمہیں مصیبتوں کے بعد حکومت اور بادشاہت ملے گی چنانچہ اسلام قبول کرنے کے بعد ملی ۶۹ح

    اکثر ان کے بدھ مذہب میں داخل ہو گئے تھے ۱۷

    پ

    پادری

    اناجیل کے حوالے سے ان کا جھوٹ اور جعل سازی پر کمر باندھنا ۱۴۲

    ان کا تعصب سے کہنا کہ آپؐ سے کوئی معجزہ ظاہر نہیں ہوا۱۳۸،۱۳۷

    ان کی موجودہ حالت اوراس کے مقابل خدا کا مسیح کو بھیجنا ۱۴۳

    اب وہ زمانہ ہے کہ کوئی پادری ہمارے سامنے کھڑا نہیں ہو سکتا ۳۷۱

    امریکہ اور یورپ کے پادریوں کو مقابلہ کی دعوت ۳۷۱

    حضرت اقدس ؑ کو پادریوں پر فتح ملنے اور ان کے مکروں پر خدا کا مکر غالب آنے کی بشارت ۲۸۴

    پیشگوئی

    ہمیشہ پیشگوئیوں میں تین پہلو قابل غور ہوتے ہیں ۴۰۲

    پیشگوئیاں چھ صورتوں سے باہر نہیں ہوتیں ۱۵۱

    ہر پیشگوئی کی قدر ومنزلت جانچنے کا ایک طریق ۱۵۱

    کسی ایسے نبی کا نام تو لو جس کی بعض پیشگوئیوں کی نسبت جاہلوں نے شور نہ مچایا ہو



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 648

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 648

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/648/mode/1up

    16

    ناموں میں پیشگوئی مخفی ہونے کی عادت اللہ ۲۷۵

    ان کتابوں کا ذکر جن میں حضرت اقدس ؑ کی پیشگوئیاں درج ہیں ۱۵۱

    آنحضرت ﷺ سے کفار نے اس قسم کے نشان مانگے ۔گھر سونے کا ہو جائے ،نہریں جاری ہوں ،آسمان پر چڑھ جائیں دیکھتے دیکھتے اترآئیں وغیرہ ۵۳۹

    خسرو پرویز شاہ ایران کے بارہ میں پیشگوئی کی تفصیل ۳۷۶ تا ۳۷۹

    وعیدی پیشگوئیاں

    اہل اسلام ،نصاریٰ اور یہود کا متفق علیہ عقیدہ ہے کہ وعید یعنی عذاب کی پیشگوئی بغیر شرط توبہ و استغفار اور خوف کے بھی ٹل سکتی ہے ۵۳۵

    شرط کا تحقق میعاد کی رعایت کو باطل کر دیتا ہے ۵۵۰

    حضرت مسیح موعودؑ کی پیشگوئیاں

    حضرت اقدس کی پیشگوئیوں کی شان اور عظمت ۱۴۷

    آپ کی بعض مشروط پیشگوئیوں پر مخالفین کا اعتراض کرنا ۱۴۸

    ہندو مذہب کے اسلام کی طرف زور سے رجوع کی پیشگوئی۴۷۱

    عیسائیوں ہندوؤں، آریوں کو مقابل پر نشان نمائی کی دعوت مگر پیشگوئی کہ ہرگز ایسا نہ ہو گا ۱۴۰،۱۴۱

    غیر معمولی نشان کے ظہور کے حوالے سے دو خوابوں کا ذکر ۵۰۴

    حضرت مسیح موعود ؑ کو خواب میں مولوی عبد اللہ صاحب کی وفات کے متعلق بتایا جانا اور ان کا جلدفوت ہونا ۳۵۱تا۳۵۲

    مسیح موعودؑ کو مولوی عبد اللہ کا وفات کے بعد خواب میں خواب کی تعبیر بتانا اور اس کے مطابق واقع ہونے کا نشان۳۵۲تا۳۵۴

    خواب میں حضرت مسیح موعود کی تطہیر کی دعا اور اسکا پورا ہونا ۳۵۱،۳۵۲

    لیکھرام کی پیشگوئی معمولی نہیں بلکہ ہیبت ناک نشان ہے ۳۸۸

    لیکھرام کی پیشگوئی جلالی جبکہ آتھم کی جمالی ہے ۳۶۵تا۳۶۸

    لیکھرام کی پیشگوئی کے الفاظ از آئینہ کمالات اسلام۳۸۱ تا ۳۸۲

    آتھم اور قیصر روم کی پیشگوئی میں مماثلت ۳۷۵،۳۷۶

    لیکھرام کے بارہ میں پیشگوئی کی خسرو پرویز کے متعلق پیشگوئی سے مماثلت ۳۷۲تا۳۷۹

    لیکھرام اور آتھم کو سنایا گیا کہ جو شخص جھوٹے مذہب پر ہو گا وہ اس شخص سے پہلے مر جائے گا جو سچا ہو گا ۵۵۲

    ۲۴ مئی ۱۸۹۷ ء کے اشتہار میں رومی(ترکی) سلطنت کے ارکان دولت کی نسبت پیشگوئی جن کا چال چلن سلطنت کو مضر ہے۴۰۶

    براہین احمدیہ کی ایک پیشگوئی کے پورا ہونے کا ثبوت کہ ’’میں تجھے ایک نامور انسان بناؤں گا۔۔۔ ۱۵۲

    براہین احمدیہ وغیرہ کتابوں میں مذکور چند آئندہ زمانہ کی پیشگوئیوں کا ذکر ۱۵۲ح

    براہین میں تین ابتلاؤں کی پیشگوئی کا ذکر اور ان کا پورا ہونا۱۵۳ح

    ۲۱ نومبر ۱۸۹۸ء کی پیشگوئی کے پورا ہونے کا تیسرا پہلو۴۳۱

    اس اشتہار کی میعاد میں چوتھے لڑکے کی پیدائش اور عبدالحق غزنوی کے نہ مرنے کی پیشگوئی کا پورا ہونا اور بٹالوی کی ذلت کا نشان۴۴۴

    سید احمد خاں صاحب کے کئی قسم کی بلاؤں میں مبتلا ہو کر وفات پانے کی پیشگوئی ۴۶۴

    بذریعہ الہام آپ کو مبشر اولاد کا وعدہ دیا جانا ۲۸۸

    دہلی میں شادی ہونے اور چار بیٹے دیئے جانے کا ذکر ۲۰۱

    چار لڑکوں کے پیدا ہونے کی نسبت پیشگوئی کی قدر ومنزلت۱۵۱

    پیشگوئی پسر موعود کا ذکر ۲۸۸

    پیشگوئی پسر موعود کی نسبت اعتراض کا جواب ۲۸۹ح

    ۲۱ نومبر ۱۸۹۸ء کی پیشگوئی کے پورا ہونے کا تیسرا پہلو۴۳۱

    عبدالحق غزنوی کی زندگی میں چوتھے لڑکے کا پیدا ہونا

    ۲۲۱،۴۴۴،۵۱۱

    چوتھے لڑکے کا عقیقہ اور اس روز ایک پیشگوئی کا پوراہونا ۱۴۶

    اس اعتراض کا ردّ کہ لڑکی پیدا ہوئی اور پھر لڑکا پیدا ہوا ۱۵۴

    ضمیمہ تریاق القلوب نمبر ۲ میں حضرت اقدس ؑ کی تحریر کردہ پیشگوئیاں

    ۱۔ نواب سردار محمد حیات خاں صاحب کے ایک خطرناک مقدمہ سے بریت کی پیشگوئی ۱۹۲



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 649

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 649

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/649/mode/1up

    17

    ۲۔بشمبر داس کی نصف قید اور اس کے ساتھی کی مکمل قید کی پیشگوئی ۱۹۳

    ۳۔پنڈت دیانند کے فوت ہونے کی پیشگوئی ۱۹۵

    ۴۔ملاوامل کے تپ دق سے شفا یاب ہونے کی پیشگوئی ۱۹۵

    ۵۔ ایک درد ناک ران دیکھنے کی پیشگوئی ۱۹۶

    ۶۔سرخ سیاہی سے پڑنے والے چھینٹوں کا نشان ۱۹۷

    ۷۔ حضرت اقدسؑ کے والد کی وفات اور وفات کے بعد معاشی طور پر مدد کی پیشگوئی ۱۹۸

    ۸۔دو ہزار سے زیادہ مرتبہ حاجت کے وقت خدا کا روپیہ آنے کی خبر دینا اور اس کا پورا ہونا ۱۹۹

    ۹۔ایک حسین لڑکا عطا کئے جانے کی خوشخبری کا ظہور ۲۰۰

    ۱۰۔ایک کنواری اور ایک بیوہ سے شادی کی پیشگوئی ۲۰۱

    ۱۱۔ایک سید خاندان میں شادی اور اس شادی کے موقع پر تمام ضروریات کا خدا کی طرف سے پورا کرنے کی پیشگوئی ۲۰۱

    ۱۲۔نواب محمد علی خاں صاحب کے خط کے قادیان آنے سے قبل ہی ان کے خط کے جواب روانہ کرنا اور ان کی مشکل دور ہونے کی پیشگوئی ۲۰۴

    ۱۳۔گوجرانولہ کے ایک اکسٹرا اسسٹنٹ کا ایک نشان دیکھ کر بیعت کرنا ۲۰۶

    ۱۴۔ زمینداری مقدمہ میں جھنڈا سنگھ نامی دخیلکار پر ہماری ڈگری کی پیشگوئی ۲۰۶

    ۱۵۔سخت بیماری کی حالت میں سبحان اللّٰہ وبحمدہ۔۔۔ اور دریائی پانی کے ذریعہ شفا پانے کا نشان ۲۰۸

    ۱۶۔زمینداری مقدمے میں قریبی رشتوں داروں کے بارے میں دعا قبول نہ ہونے کی پیشگوئی ۲۰۹

    ۱۷۔مرزا غلام قادر مرحوم کابیماری سے شفا پانا اور ۱۵ برس زندہ رہنا ۲۱۰

    ۱۸۔مرزا غلام قادر مرحوم کی جلد وفات کی پیشگوئی ۲۱۱

    ۱۹۔مدراس کے سیٹھ عبد الرحمن کے حق میں دعا اور ان کو پیش آمدہ غم سے نجات کی پیشگوئی ۲۱۲

    ۲۰۔مولوی حکیم نور الدینؓ کے لئے نعم البدل لڑکا ملنے کی پیشگوئی ۲۱۳

    ۲۱۔چوتھے لڑکے مبارک احمد کی پیدائش اور نیک ہونے یا وفات پانے کی پیشگوئی ۲۱۳

    ۲۲۔ پہلے لڑکے حضرت مرزا بشیر الدین محمود احمد کی پیدائش کی پیشگوئی ۲۱۴

    ۲۳۔دوسرے لڑکے حضرت مرزا بشیر احمد صاحب کی ولادت کی پیشگوئی ۲۱۴

    ۲۴۔تیسرے لڑکے حضرت مرزا شریف احمد صاحب کی ولادت کی ۹ ماہ قبل پیشگوئی ۲۱۴،۲۱۵

    ۲۵۔انجام آتھم اور ضمیمہ انجام آتھم کے حوالے سے چوتھے لڑکے کی ولادت کے ایک اور پیشگوئی ۲۱۵

    ۲۶۔جلسہ اعظم مذاہب میں مضمون کے بالا رہنے کی پیشگوئی ۲۲۳

    ۲۷۔براہین احمدیہ کی تالیف میں اعانت کے لئے دعا کرنے پر مدد نہ ملنے کی پیشگوئی ۲۲۸

    ۲۸۔اضطراب کے ساتھ دعا کرنے پر براہین احمدیہ کی تالیف کے لئے مالی امداد ملنے کی پیشگوئی ۲۲۸

    ۲۹۔عبد اللہ خان نامی شخص کی طرف سے رقم آنے کی پیشگوئی ۲۲۹

    ۳۰۔کرامت اور نشان کے طور پر قرآن اور زبان کی نسبت دو طرح کی نعمتوں کا عطا کیا جانا ۲۳۰

    ۳۱۔آپ کے ذریعہ اسلام کے غلبہ کی پیشگوئی ۲۳۱

    ۳۲۔عیسائیوں کی جانب سے ایک فتنہ اور مکر کی پیشگوئی جو آتھم کے ذریعہ ظہور میں آئی ۲۴۹

    ۳۳۔حضرت اقدسؑ کی شہرت کی پیشگوئی ۲۵۴

    ۳۴۔ پچاس روپے آنے کی پیشگوئی ۲۵۵

    ۳۵۔حضور ؑ نے سیالکوٹ کے لالہ بھیم سین کو بتایا کہ امسال تمام مختار کاری کا امتحان دینے والے فیل ہو جائیں گے سوائے لالہ صاحب کے ۲۵۶

    ۳۶۔لالہ بھیم سین کو قبل از وقت بتایا کہ راجہ تیجا سنگھ فوت ہو گئے ہیں جب اس کی تصدیق ہو گئی تو انہوں نے تعجب کا اظہار کیا۔ ۲۵۶۔



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 650

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 650

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/650/mode/1up

    18

    ۳۷۔ایک مرتبہ حضورؑ کو روپیہ کی سخت ضرورت تھی آپ کو الٰہام ہوا دس دن بعد موج دکھاتاہوں۔۔۔پھر الٰہام کے مطابق پیسے بھی آئے اور آپ امرتسر بھی گئے ۔ ۲۵۷

    ۳۸۔حافظ نور احمد صاحب کے الٰہام سے انکار کی وجہ سے خدا کے حضور توجہ کی گئی تو کشف میں دکھایا گیا کہ ایک جھگڑے کے متعلق خط آنے والا ہے ۲۵۸،۲۵۹

    ۳۹۔حاجی ارباب محمد لشکر خاں کے روپیہ کے آنے کی پیشگوئی۲۵۹

    ۴۰۔ایک دفعہ جہلم سے قبل از وقت روپیہ آنے کی بذریعہ الٰہام اطلاع دی گئی ۲۵۹

    ۴۱۔حیدر آباد سے نواب اقبال الدولہ صاحب کی طرف سے خط اور روپیہ آنے کی پیشگوئی ۲۶۰

    ۴۲۔ایک دوست نے خط لکھا کہ اس کا عزیز ایک سنگین مقدمہ میں ماخوذ ہے اور صورت رہائی نظر نہیں ۔ آپ ؑ کی دعا سے اس کی رہائی ہوئی ۲۶۰،۲۶۱

    ۴۳۔درویشوں کے قادیان آنے کی نسبت پیشگوئی ۲۶۱

    ۴۴۔آپؑ کو میاں نجف علی کے آپ ؑ کی نسبت مخالفت اور نفاق کی باتیں کرنے پر مطلع کیا جانا ۲۶۳

    ۴۵۔ایک خوفناک ہیضہ کے پھوٹنے کی پیشگوئی ۲۶۳

    ۴۶۔ایک انگریزی خواں کے آنے پر اس کے دشمن ہونے کی پیشگوئی ۲۶۵

    ۴۷۔آپ کے ذریعہ سے دین اسلام کی سچائی اور تمام مخالف دینوں کے باطل ہونے کی نسبت پیشگوئی ۲۶۵

    ۴۸۔دور دراز کے ملکوں سے روپیہ کے آنے کی پیشگوئی ۲۶۸

    ۴۹۔دہلی کے خاندان سادات میں شادی ہونے کی پیشگوئی ۲۷۲

    ۵۰۔ایک باکرہ بیوی کے ملنے کی پیشگوئی جو حضرت خدیجہ کی اولاد سے یعنی سید ہو گی ۲۸۷

    ۵۱۔میاں عبد اللہ سنوری صاحب کے ایک کام کے نہ ہونے کے متعلق پیشگوئی ۲۸۹

    ۵۲۔پٹیالہ کے سفر میں یکے بعد دیگرے ہم وغم پہنچنے کی پیشگوئی ۲۹۱

    ۵۳۔گورداسپور کے سفر میں آپ کے اور شیح حامد علی کے نقصان کی پیشگوئی ۲۹۴

    ۵۴۔پچاس روپے کی ضرورت پیش آنے پر دعا کرنا اور بذریعہ الٰہام قبولیت دعا کے بتائے جانے کی پیشگوئی ۲۹۵

    ۵۵۔ضلع لاہور سے ۴۴یا ۴۶ روپیہ کے آنے کی پیشگوئی ۲۹۵

    ۵۶۔میر محمد اسحاق اور ان کی والدہ کی وفات کی خبر جھوٹی ہونے کی نسبت بذریعہ الٰہام بتایا جانے کا نشان ۲۹۵

    ۵۷۔مولوی محمد حسین بٹالوی کے حضرت اقدسؑ کے خلاف کفر کا فتوی ملک میں پھیلانے کی پیشگوئی ۲۹۷

    ۵۸۔ایک برزگ کے حضرت اقدسؑ کے حق میں دلآزار کلمہ کہنے کے بعد پشمانی اور تذلل کا اظہار کرنے اور آپ کی خدمت میں معذرت کا خط لکھنے کی پیشگوئی ۲۹۹

    ۵۹۔مسٹر ڈوئی مجسٹریٹ ضلع گودراسپور کی عدالت میں چلائے جانے والے مقدمہ میں بریت کی پیشگوئی ۳۰۹

    ۶۰۔مقدمہ ٹیکس میں بریت کی پیشگوئی ۳۳۰

    ۶۱۔ایک حاکم گواہی کے لئے بلانا پر دستور کے مطابق قسم نہ دینے کی پیشگوئی ۳۳۱

    ۶۲۔ہنری مارٹن کلارک کے مقدمہ اقدام قتل میں بریت کی پیشگوئی ۳۴۱

    ۶۳۔ ایک ہی رات میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے بتمام و کمال آپ کی اصلاح کی ایک رؤیا کے ذریعہ سے خبر ۳۵۱

    ۶۴۔ آپ کے ذریعہ بہت سے آسمانی نشانوں کے ظاہر ہونے کی پیشگوئی جو ایک رؤیا کی شکل میں مولوی عبداللہ غزنوی مرحوم کو بھی سنائی گئی تھی ۳۵۴

    ۶۵۔ آتھم کے متعلق پیشگوئی اور اس کی تفصیل ۳۵۴

    ۶۶۔ پنڈت لیکھرام کی ہیبت ناک موت کی پیشگوئی ۳۷۱

    ۶۷۔ سلطنت رومی اور اسکے عمائدین اور حسین کامی کی نسبت پیشگوئی ۴۰۵

    ۶۸۔ امہات المؤمنین کی اشاعت پر انجمن اسلام کے ایک میموریل کی ناکامی کی پیشگوئی ۴۱۴،۴۱۵

    ۶۹۔ مرزا محمد یوسف بیگ سامانوی کے لڑکے کی وفات کی خبر۴۱۵

    ۷۰۔ محمدحسین بٹالوی اور اس کے دو رفیقوں کی نسبت ذلت کی پیشگوئی



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 651

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 651

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/651/mode/1up

    19

    ۷۱۔ مبارکہ کی پیدائش اور والدہ کی تکلیف دور ہونے کی پیشگوئی ۴۵۱

    ۷۲۔سلسلہ نبوت سے مشابہ ایک عظیم الشان نشان۔ فتنوں اور قتل کے منصوبوں سے بچائے جانے کی پیشگوئی ۴۵۱

    ۷۳۔ سید احمد خاں صاحب کے کئی قسم کی بلاؤں میں مبتلا ہو کر وفات پانے کی پیشگوئی ۴۶۴

    ۷۴۔ قاضی ضیاء الدین صاحب پر ایک سخت ابتلا کے آنے کی پیشگوئی ۴۷۲

    ۷۵۔غیب گوئی اور معارف عالیہ کے رنگ میں جو زبردست نشان خدا نے حضرت اقدسؑ کی تائید میں ظاہر فرمائے ۴۷۵

    ت

    تعدد ازدواج

    اسرائیلی نبیوں کا توریت کے مطابق ایک ہی وقت میں صدہا بیویوں کو رکھنا ۴۸

    تعصب

    اس کا نقصان ۱۴۸

    متعصب انسان کی عادت ۱۴۷

    تفسیر

    مختلف زبانوں میں ’’گذرنا بمعنی مرنا‘‘ ایک قدیم محاورہ اور اس کی امثال ۵۷۲،۵۷۳

    خَلَتْ کے معنے قرآن کریم میں ۵۷۴تا۵۷۷

    مختلف تفاسیر میں خَلَتْکے معنی موت ۵۷۳

    قرآن کریم میں خَلَتْ کے معنی ۵۷۴تا۵۷۷

    لقد جاء کم رسول من انفسکم میں انفس کی دو قراء تیں اور ان کا مطلب ۲۸۱ح

    قرآن میں لفظ عذاب کی تشریح ۳۸۸

    لفظ محصنات کی تشریح ۳۱۸

    منعم علیہم سے مراد ۴۲۳

    سورۃ الناس میں خدا کی اطاعت کے ساتھ، والدین، مرشد اور بادشاہ کی اطاعت کا حکم ۶۱۸

    اس سورت میں حقیقی اور عارضی حمد کا ذکر ۶۰۲

    اس سورت میں خدا کی شکرگزاری کا مضمون ہے ۶۰۲

    سورۃ الناس میں تین قسم کے حق بیان فرمائے گئے ہیں ۶۰۲

    تناسخ

    بدھؑ کے نزدیک تناسخ تین قسم کا تھا ۹۰

    توفی

    حدیث اور لغت سے توفّی کے موت کے معنوں کاثبوت۴۵۸ح

    حدیث یا قرآن یا فن ادب سے توفّی کے معنی موت کے علاوہ

    کوئی اور دکھانے پر پانچ سو روپیہ بلاتوقف دینے کا چیلنج۴۵۸ح

    سارے قرآن اور حدیثوں میں توفّی کا لفظ قبض روح کے معنوں میں آیا ہے ۵۶۲

    ج

    جلسہ

    ٹرانسوال کی جنگ میں انگریزی حکومت کی کامیابی کے لئے قادیان میں ایک جلسہ کا انعقاد ۵۹۴

    مختلف مذاہب کی سچائی پرکھنے کے لئے جلسہ کی تجویز ۴۹۵

    جہاد

    اسلامی لڑائیاں تین قسم سے باہر نہیں ۱۲

    ابتدائے اسلام میں تلوار اٹھائے جانے کی اجازت ملنے کا سبب ۱۲۱

    اسلامی جنگوں کی حقیقت او ردفاعی جنگ سے مراد ۴

    آنحضرتؐ نے مکہ میں کفار کا ظلم برداشت کیا مگر تلوار نہ اٹھائی ۱۰

    تلوار اٹھانے کی اجازت کب ملی، اس کا ذکر ۱۱، ۱۲،۱۲۱

    مسلمانوں میں غلط جہاد کا تصور ۴

    سلسلہ احمدیہ کا جنگ اور لڑائی سے کوئی سروکار نہیں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 652

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 652

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/652/mode/1up

    20

    مسلمانوں کو دین کے معاملے میں جبر اور جہاد سے روکنا ۱۵۶

    دین کے پھیلانے کے لئے جنگ خلافِ ہدایت قرآن ہے ۱۳۰ح

    جن کے ہاتھ میں خدا سچائی اور آسمانی نشانوں کی تلواریں دے انہیں لوہے کی تلوار کی کیا ضرورت ۱۵۸

    جنگ سے مراد زبانی مباحثات ۱۳۰ح

    جن کے پاس دین پھیلانے کے لئے تلوار ہے وہ درندوں کی طرح ہیں اور تعریف کے لائق نہیں ۱۳۱ح

    اس اعتراض کا رد کہ اسلام نے دین کو جبراً پھیلانے کے لئے تلوار اٹھائی ہے ۱۱

    حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے اپنی عربی، فارسی کتابوں میں جہاد کی حقیقت کو بیان کیا ہے ۴

    مختلف ممالک میںآ پ کی کتابوں کا پھیلایا جانا اور مسلمانوں کا جہاد کے غلط خیالات کا چھوڑنا ۱۱۴

    عرب شام وغیرہ میں جہاد سے متعلقہ کتب کی اشاعت ۵

    اس وقت کے غیر قوم کے بادشاہ اسلام کی مذہبی آزادی کو نہیں روکتے پھر کیوں تلوار اٹھائی جائے ۱۱

    مسلمانوں کو بطور مدافعت اور حفاظت خود اختیار لڑنے کی اجازت کا دیا جانا۔ تین قسم کے شرعی جہاد ۴

    اس ملک کے مسلمانوں کا جہاد کا نظریہ بہت کچھ اصلاح پذیر ہو گیا ہے ۱۲۰

    آنحضرت ؐ اور صحابہ کی جنگوں کی وجوہات ۲۴۶

    صلیبی واقعہ کی اصل حقیقت کسی جنگ اور لڑائی کے بغیر محض آسمانی اسباب سے کھلے گی ۶۴

    اسم احمد میں جہاد کے متعلق مخفی پیشگوئی ۵۲۷

    جہاد کے حوالے سے دو قسم کے مسلمان ۵۱۹

    جین مت

    ان کی رحمدلی کا ذکر ۴

    اس مذہب میں کسی جاندار کو مارنا روا نہیں ۱۶۳

    ح،خ

    حدیث

    اس عقیدہ کا رد جس کے مطابق صرف وہی قول حدیث ہے جو مرفوع متصل ہو اور منقطع نہ ہو ۵۷۰۔۵۷۱

    کاشتکاری میں ذلت کے متعلق احادیث ۴۴۹

    مسیح موعود کے ہاتھ پر کسر صلیب ہو گا ۶۴،۲۴۵

    مسیح موعود کے عہد میں تمام ملتیں ہلاک ہونے سے مراد ۲۶

    اذا ھلک کسرٰی والی حدیث کی لطیف تشریح ۳۷۹

    حکومت

    حکومت عام اور حاکم عام سے مراد برگزیدوں کو دی جانے والی آسمانی حکومت ہے ۱۳۳ح

    خدا کی اطاعت کے ساتھ حکومت کی اطاعت کا حکم ۶۱۹

    خلافت

    خلیفہ ظلی طور پر خدا کی ربوبیت کا مظہر ہوتا ہے ۶۰۲

    روحانی مرشد خدا کی منشا اور توفیق سے تربیت کرتا ہے ۶۰۴

    سورۃ الناس میں خداکی اطاعت کے ساتھ مرشد کی اطاعت کا حکم ۶۱۹

    اسلام میں عرصہ دراز تک ایسے بادشاہوں میں خلافت رہی جوعلم کی توسیع زیادہ چاہتے تھے ۶۰

    خُلق

    انسان کی بدی کے لئے یہ کافی ہے کہ وہ اپنی عورت کی ہمدردی سے لاپروا ہو ۸۹

    ایک گال پر طمانچہ کھا کر دوسری بھی پھیر دینے کی تعلیم کے ناقص ہونے کا ذکر ۱۶۲،۱۶۳

    عُجب اور شہوت وغیرہ قوتیں مناسب استعمال کے لئے پیدا کی گئی ہیں ۱۶۲

    کسی کو جبر و اکراہ سے دین میں داخل کرنے سے اخلاق فاصلہ کا نام و نشان نہیں رہتا



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 653

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 653

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/653/mode/1up

    21

    خنزیر

    قتل خنزیر سے مراد ۸۷

    د،ذ،ر،ز

    دجال

    خیر و برکت والے مسیح کے بالمقابل شر اور *** سے مسح کئے گئے مسیح دجال کو پیدا کیا جانا ۷۱

    راستی پر قائم مومن ہمیشہ دجال پرفتح پائیں گے ۳۴۰

    دعا

    ہر صادق کا تجربہ کہ بیقراری اور مظلومانہ حالت کی دعا قبول ہوتی ہے ۳۲

    دعا کا قبول ہونا اول علامت اولیاء اللہ میں سے ہے ۱۷۱

    نبیوں کا مانا ہوا اصول کہ یرد القضاء بالصدقات والدعاء ۵۵۰

    مقبول کا سوال جو بے قراری کے وقت کا سوال ہو ہرگز ردّ نہیں ہوتا ۳۰

    مقبولوں کی اول علامت مستجاب الدعوات ہونا ہے ۲۴۱

    وہ حالت جس کی دعاؤں کی قبولیت کے لئے ضرورت ہے۴۶۹

    دکھ اور صدق کے مشتبہ ہونے پر ہمارا حق کہ ہم خدا کے آگے روئیں اور نشان مانگیں ۵۱۴

    دلیل

    بغیر ثبوت کے جو کچھ بیان کیا جائے وہ قبول کے لائق نہیں۳۳۸

    مباحثات کا میدان وسیع ہوتا ہے اور دلائل عقلیہ اکثر نظری ہوتے ہیں ۱۶۷

    اس زمانہ کے لوگوں کو معلوم نہیں کہ دعویٰ اور دلیل میں کیا فرق ہے ۳۳۸

    وہ دلیل جو نہایت درجہ روشن ہونے کی وجہ سے دلوں پر اپنا تسلط کرلے سلطان کہلاتی ہے۔ ۵۰۵

    دنیا

    صدمہ کے وقت دنیادار لوگوں کی حالت ۴۶۵،۴۶۸

    دنیا کے ایک بڑے حصہ کے ہلاک ہونے کی وجہ خدا کے وجود اور اس کی الہامی ہدایتوں پر ایمان نہ ہونا ہے ۱۴۲

    ذلت

    دنیا میں ذلت تین قسم کی ہوتی ہے ۴۴۷

    ذلت کئی قسم کی ہوتی ہے جو ہر ایک طبقہ کے مناسب حال ہوتی ہے ۴۴۵

    کاشتکاری میں ذلت کے متعلق احادیث ۴۴۹

    رؤیا

    آج تک یہ کبھی نہیں ہوا کہ جس کے بچانے کے لئے خدا رؤیا میں کسی کو ترغیب دے کہ ایسا کرنا چاہیے تو وہ بات خطا جائے۲۳

    روح

    روحوں میں رشتے اور ازل سے دوستی دشمنی ہوتی ہے ۶۳۵ح

    روحانی قویٰ ریاضت سے نشوونما پاتے ہیں ۶۱۲

    جن دلوں کو روحانی طاقت عطا ہو وہ تکبر نہیں کرتے ۴۶۵

    روزہ

    مطیع و عاصی میں فرق کرنے کے لئے روزہ میزان کا حکم رکھتا ہے ۶۰۷

    مسلمانوں کی شریعت سے بیزاری کا ثبوت کہ آسانی کے مہینوں کے باوجود روزے نہ رکھنا ۶۰۷

    زبان

    ایک زبان کے لفظ کے دوسری زبان میں آنے سے کچھ تغیر ہو جاتا ہے اس کی مثالیں ۸۰

    زمانہ

    اس زمانے میں انواع اقسام کے شرک اور الحاد کا ظہور۴۵۳ح ح ح

    زنا

    مستور الحال عورتوں پر زنا کی تہمت کی سزا ۴۴۲

    زندگی

    دنیا میں صرف دو قسم کی زندگی قابل تعریف ہے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 654

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 654

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/654/mode/1up

    22

    جسمانی وجود کے ساتھ لمبی عمر پانا جائے فخر نہیں ۱۳۹

    نئی زندگی حاصل کرنے کا طریق ۴۹۷

    حقیقی روحانی اور فیض رساں زندگی ۱۳۰

    صرف نبی کریمؐ کی روحانی زندگی ثابت ہے ۱۳۸

    س،ش،ص

    سچائی دیکھئے ’’صداقت‘‘

    سکہ

    پرانی کتابوں کا مرتبہ اور عزت سکوں اور کتبوں سے زیادہ ہے ۶۱

    پنجاب سے ایک سکہ برآمد ہونا جس پر حضرت عیسیٰ ؑ کا نام پالی میں درج ہے ۵۳

    ایک سکہ کا برآمد ہونا جس پر اسرائیلی مردکی تصویر ہے ۵۳

    سکھ مت

    گرنتھ میں اسلام کے خلاف اشعار اس زمانہ کے ہیں جب سکھوں میں تعصب اور کینہ بڑھ گیا تھا ۲۴۸

    ان کے زمانے میں خلافِ اسلام کارروائیوں کا ذکر ۶۰۵

    ان کا زمانہ ایک آتشی تنور تھا ۶۰۸

    جس طرح عیسائیوں اور ہندوؤں پر حجت پوری کی گئی ایسا ہی ان پر بھی ہو گئی ۲۴۷

    وہ چولہ جس پر قرآن شریف کی آیات لکھ ہوئی ہیں ، ڈیرہ بابا نانک میں موجود ہے ۲۴۷

    شاعر

    عربی شعراء کا قرآن کی تفسیر کے حوالے سے مقام ۴۳۰

    عربی شعراء کے اشعار کا تذکرہ جن میں عجب کے لئے لام کا صلہ استعمال ہوا ہے ۴۲۸تا۴۳۰

    اس اعتراض کا جواب کہ یہ اشعار جاہلیت کے شعراء کے ہیں وہ تو کافر ہیں ہم ان کے کلام کو کب مانتے ہیں؟ ۴۳۰

    شکر

    خدا نے تعلیم دی ہے کہ محسن کا شکر کرو ۶۲۳

    سورۃ الناس میں خدا کی شکرگزاری کا مضمون ہے ۶۰۲

    شہید

    شہید سے مراد ۴۲۱

    شہادت وہ مرتبہ ہے جہاں خدا اور روز جزا پر یقین کی برکت سے اعمال صالحہ کی مرارت اور تلخی دور ہو جاتی ہے ۴۲۰

    مرتبہ شہادت جو اولیاء کو دیا جاتا ہے ۔ اس سے مراد ۴۲۰

    شہید کا کمال ۵۱۶

    شیطان

    اس کا انسان کو خدا کی اطاعت سے روگرداں کرنا ۶۱۸

    اس کا نام خناس رکھا جانا ۶۱۸

    اس کا نام لعین ہونے کی وجہ ۱۲۲

    حضرت عیسیٰ سے بیت المقدس میں اس کا معجزہ مانگنا ۵۶۱

    صالح

    وہ مرتبہ جب کسی شخص کو صالح کہتے ہیں ۴۲۲

    صالح کا کمال ۵۱۶

    صحابہ

    صحابہ کا سچے ایمانداروں کی طرح صدق دکھلانا اور آنحضرتؐ سے وفا داری جبر کا نتیجہ نہیں ہو سکتا ۱۲

    صحابہ کا دین کی خاطر تکالیف برداشت کرنا ۱۰

    صحابہ کے صدق اور وفا داری کے نمونے کی دوسری قوموں میں نظیر ملنا مشکل ہے ۱۲

    صحابہ کو مدافعت کے لئے تلوار اٹھانے کی اجازت دی گئی ۱۰

    صحابہ کی جنگوں کی وجوہات ۲۴۶

    صحابہ کا اجماع حجت ہے جو کبھی ضلالت پر نہیں ہوتا۴۶۱ح

    صداقت

    سچائی کے قبول کرنے میں قوم اور برادری اور عقائد رسمیہ کی کچھ پرواہ نہ کریں ۲۴



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 655

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 655

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/655/mode/1up

    23

    صدق کی دو اقسام ۵۶۸

    ضروری ہے کہ جھگڑے، اختلاف ہوں آخر سچائی کی فتح ہے ۶۵

    راستی پر قائم مومن ہمیشہ دجال پرفتح پائیں گے ۳۴۰

    حق اور راستی سے منحرف ضلالت کی آلودگی میں مبتلا ہے۴۳۳

    صحابہ کے صدق اور وفا داری کے نمونے کی دوسری قوموں میں نظیر ملنا مشکل ہے ۱۲

    صادق کے لئے مصیبت کا وقت نشان ظاہر کرنے کا وقت ہوتا ہے ۳۲

    صدیق

    صدیق سے مرد ۴۲۰

    ولی کا وہ درجہ جہاں انسان کا نام صدیق ہوجاتا ہے ۴۱۹

    صدیق کے لئے تقوی،امانت اور دیانت شرط ہے ۴۲۲

    صدیق کا کمال ۵۱۶

    صلیب

    یہود میں صلیب دینے کا طریق ۲۷

    مسیح موعود کے ہاتھ پر کسر صلیب کی پیشگوئی ۶۴، ۱۶۶

    کسر صلیب سے مراد ۸۷

    کسر صلیب کی تین صورتیں ۱۶۶

    ط،ع

    طبابت

    اسلام کے بادشاہوں کا طب کو ترقی دینا اور تراجم کروانا ۶۰

    دوا کے اجزاء کا بندوبست بھی خدا نے کیا ہے ۶۰۱

    مردہ کا خون جم جاتا ہے ۲۷

    مریضوں کے مناسبِ حال نباتات، جمادات وغیرہ کی پیدائش ۶۰۱

    پیشاب بند ہو تو اسے جاری کرنے کا طریق ۶۰۱

    عبادت

    پوری آزادی اور اطمینان سے عبادات بجا لانے کے لئے چار ضروری شرائط ۶۱۳

    نماز کی حقیقت ۵۱۶

    وہ مرتبہ جہاں عبادت اور ذکر الہٰی کا مزہ اعلیٰ درجہ کی حالت پر آجائے ۴۲۲

    عبادت اور ذکر الہٰی میں لذت نہ آنے کی وجہ ۲ ۴۲

    عبادات کمال اطمینان سے بجا لا نے کی ایک شرط ۶۱۶

    عبرانی

    یہود کی قدیمی زبان جس میں خدا کی کتابیں تھیں ۱۴۲

    عذاب

    نوح کی قوم کا عذاب ۳۸۴

    قوم لوط کا عذاب ۳۸۴

    اصحاب الفیل کا عذاب ۳۸۴

    نبی کریم ﷺ کی قوم کا عذاب ۳۸۵

    انبیاء کے مخالفوں پر عذاب ۳۸۵

    قرآن میں لفظ عذاب سے مراد موت ۳۸۸

    صدمہ کے وقت دنیا دار لوگوں کی حالت ۴۶۵

    عربی زبان

    اُن عربی اشعار کا تذکرہ جن میں عجب کے لئے لام کا صلہ استعمال ہوا ہے ۴۲۸تا۴۳۰

    اس اعتراض کا جواب کہ یہ اشعار جاہلیت کے شعراء کے ہیں وہ تو کافر ہیں ہم ان کے کلام کو کب مانتے ہیں؟ ۴۳۰

    علم کلام

    مذہبی آزادی کے کے دور میں علم کلام کا ترقی کرنا ۶۱۲

    عنصر

    یہ عن سرٍّ ہے یعنی یہ چیز اسرار الٰہی میں سے ہے ۶۱۹

    عید الفطر

    حضرت مولوی نور الدین کا نماز عید پڑھانا اور حضرت اقدسؑ کا خطبہ ارشاد فرمانا اور انگریزی حکومت کے لئے جلسہ کا انعقاد۵۹۶

    عیسائیت

    عیسائی جس دین کو پیش کرتے ہیں وہ حضرت عیسی ؑ کا دین نہیں بلکہ پادریوں کی ایجاد ہے ۱۴۱



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 656

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 656

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/656/mode/1up

    24

    ہندوستان میں عیسائی دین کی ترقی ۱۵۷

    قرآن وحدیث کے دلائل اگرچہ عیسائیوں کے لئے حجت نہیں لیکن اس کے باوجودان کے لکھنے سے غرض ۵۱

    ان کا مذہب مردہ ہے اور کوئی ان کے لئے زندہ فیض رسان موجود نہیں ۱۴۱

    انہیں کبھی خیال نہیں آیا کہ حضرت عیسی ؑ کی روحانی زندگی ثابت کریں ۱۳۹

    تثلیث کے عقیدہ کا ردّ ۱۳

    نزول مسیح کے حوالہ سیعیسائیوں کی نسبت وہابی،اہل حدیث اوراہل سنت کا عقیدہ ۶

    عیسائی مذہب کا تمام مدار کفارہ پر اور کفارہ کا تمام مدار صلیب پر ہے ۱۶۹

    عیسائی مذہب کے ناقص ہونے کے دلائل ۱۶۱

    عیسائی مذہب پر فتح پانے کابجز حضرت مسیح کی طبعی موت ثابت کرنے کے اور کوئی طریق نہیں ۱۶۹ح

    ان کا خدا انہی کی ایجاد ہے، خود بھی گمراہ اور دوسروں کو بھی کرنا ۱۴۳

    عیسائیوں کے موجودہ دین کے کسی پہلو سے حق کا طالب تسلی نہیں پاتا ۱۶۱

    اس خیال کارد کہ صلیبی مذہب کو تلوار سے شکست ہو گی ۱۶۰

    ان کے اس اعتراض کا ردّ کہ آنحضرتؐ کو کوئی معجزہ نہیں دیا گیا یا پیشگوئی ظاہر نہیں ہوئی ۶۶

    عیسائی مذہب اس قدر دنیا میں پھیل گیا ہے کہ صرف آسمانی نشان ہی اس کے زیر کرنے کے لئے کافی نہیں ہو سکتے ان کے اصولوں کا ابطال بھی ہو ۱۶۸

    وہ کتابیں جو عیسائیوں کے رد میں لکھیں ۔براہین احمدیہ۔نور الحق۔کشف الغطاء وغیرہ ۲۳۶

    عیسائیوں پر دو طرح سے اتمام حجت ۲۳۶

    عیسائیوں کی طرف سے اپنے مذہب کی تائید میں اسلام پر الزام قائم کریں گے۔کچھ مکر کریں گے مگر خدا ان کے مکر کی حقیقت کو کھول دے گا ۲۴۹

    عیسائیوں کے ایک عیب اور غلطی کا ذکر ۱۲۱

    ان کی بہت بڑی غلطی ہے کہ وہ ایک عاجز انسان کو خدا کہتے ہیں ۷

    اس زمانہ میں عیسائیوں کے ساتھ بڑی ہمدردی ۱۳

    وہ نشان جو انجیل میں سچے مسیحیوں کی علامت بیان کئے گئے ہیں کسی عیسائی میں ان کا ثبوت نہیں ملتا ۱۶۱

    اس مذہب کو تین طریقوں سے گرائے جانے کا ذکر ۱۶۶

    مرتد ہونے والے مسلمانوں کا کفارہ کے دھوکا سے معاد کے فکر سے فارغ ہو جانا ۴۹

    عیسائی تعلیم کے بالمقابل قرآن کریم کی تعلیم کے کامل ہونے کا ثبوت ۱۶۳

    ان کا اپنی کتابوں میں مرہم عیسیٰ کا ذکر کرنا ۴۹۸

    عیسائی مؤلفین کا سخت اور گندی زبان استعمال کرنا ۴۹۰

    عیسائیوں کی سخت کلامی کا سختی سے جواب دینے میں حکمت ۴۸۹

    ف،ق،ک

    فتح

    اسی گروہ کی فتح ہے جو دہریہ نہیں اور خدا تعالیٰ پر سچا ایمان ایمان رکھتے ہیں اور ہنسی ٹھٹھے سے پرہیز کرتے ہیں ۵۶۰

    عیسائیوں پر فتح عظیم ۲۴۵

    فسح کی عید

    افغانیوں کی یوسف زئی شاخ میں اس کا رواج ہے ۱۰۶

    قرآن شریف

    قرآن کا ظاہری اور معنوی ترتیب کو ملحوظ رکھنا ۴۵۶ح

    قرآن کی ظاہری ترتیب ایک بڑا بھاری معجزہ ہے ۴۵۷ح

    قرآن کی ظاہری ترتیب پر یقین رکھنے والے کو قرآن دانی کی کنجی ہاتھ آجاتی ہے ۴۵۶ح ح

    بلاوجہ قرآنی ترتیب کو الٹانے پلٹانے کی ممانعت ۴۶۰ح

    قرآن کی عادت کہ وہ بعض دفعہ کفار کے اقوال نقل کرتا ہے اور بوجہ بداہت بطلان ان کا رد نہیں کرتا ۴۰۰



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 657

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 657

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/657/mode/1up

    25

    فہم قرآن اور معارف کی اعلیٰ حقیقت تک کی وصولی کا کمال اولیاء کو دیا جاتا ہے ۴۱۸

    قرآن کی ایک ادنیٰ، ایک اوسط اور ایک اعلیٰ تعلیم ہے ۴۱۸

    قرآن کی طرح ولی اور نبی کے وجود میں بھی متشابہات کا حصہ ہوتا ہے ۴۲۵ح

    قرآن میں دین کی اشاعت کے لئے تلوار اٹھانے کی ممانعت ۱۲۰

    زبردستی مذہب میں داخل کرنا قرآن کی تعلیم نہیں ۱۵۶

    قرآن سے مستنبط شادی اور نکاح کے موقع پر پیش نظر رکھے جانے والے امور ۲۷۸

    قرآن کریم کی تعلیم کے کامل ہونے کا ثبوت ،عیسائی تعلیم کے بالمقابل ۱۶۳

    قرآن اس بات کا مخالف ہے کہ کسی کو دین میں داخل کرنے کے لئے قتل کی دھمکی دی جائے ۱۴

    جس موقع پر قرآن کے مخالفوں نے انگشت رکھی وہیں سے غور کرنے والوں کو ایک گنج معارف ہاتھ لگا ۶۱۲

    سارے قرآن اور حدیثوں میں توفی کا لفظ قبض روح کے معنوں میں آیا ہے ۵۶۲

    قسم

    آتھم کو قسم کے لئے بلانا اور اس کا جھوٹے بہانے بنانا

    ۱۴۹،۳۶۲،۴۲۳

    کئی دفعہ عدالت میں حاضر ہو کر قسم کھانے کا ثبوت ۱۴۹ح

    مسیح ؑ کا بغیر حاضری عدالت کے خود بخود قسم کھانا ۱۴۹

    اپنی تصدیق کے لئے لالہ شرمپت سے اولاد کی قسم دے کر پوچھنے کا کہنا ۱۵۳ح ح

    قوم

    قوموں میں خدا کے نزدیک بزرگ اور عالی نسب لوگ ۲۷۸

    قوموں کی حقیقت اور اسلام میں ذات پات اور قومی تفریق مٹا دینے کا الہٰی قانون ۲۷۸

    دوسری قوموں کی خادم اور نیچی سمجھی جانے والی قومیں ۲۷۷

    کتاب

    پرانی کتابوں کا مرتبہ اور عزت سکوں اور کتبوں سے زیادہ ہے ۶۱

    کرامت

    بعض جاہلوں کا کہنا کہ جو کرامتیں پیروں، مشائخ نے دکھائیں وہ میں نے نہیں دکھائیں۔ اس کا جواب ۳۳۶

    ایسے قصے جو ناولوں کی طرح طبیعت کو خوش کرنے کے لئے بنائے گئے ہیں کرامت کے نام سے موسوم نہیں ہو سکتے ۳۳۸

    کسوف وخسوف

    رمضان میں میری تصدیق کے لئے خسوف وکسوف ہوا۳۳۳،۳۳۴

    کشف

    کشف کے دوران بیداری کی کیفیت کا ذکر ۳۷

    کفارہ

    اس خیال کا ردّ کہ مسیح کا قتل یہود کے لئے کوئی گناہ نہ تھا کیونکہ وہ بطور کفارے کے مارے گئے تھے ۳۵

    مرتد ہونے والے مسلمانوں کا کفارہ کے دھوکا سے معاد کے فکر سے فارغ ہو جانا ۴۹

    کفارہ کے عقیدہ کے رد کر نے سے عیسائیوں پر فتح عظیم ۲۴۵

    کلمہ طیبہ

    کلمہ طیبہ کے معنی ۶۱۸

    نمایاں فتح کے لئے آنحضرتؐ کا اسے یادگار چھوڑنا ۶۵

    ل،م

    ***

    *** کا مفہوم اور کس حالت میں کسی ملعون کہتے ہیں۱۷،۱۸،۲۳۷

    حضرت مسیح علیہ السلام کو *** ٹھہرانے کا عقیدہ جو عیسائی مذہب کا اصل الاصول ہے صریح البطلان ہے ۲۳۸

    عربی اور عبرانی میں ملعون کے معنی خدا کی رحمت سے محروم ، خدا سے بیزار کے ہیں ۱۲۱،۱۲۲،۲۳۷،۲۳۸



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 658

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 658

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/658/mode/1up

    26

    *** کے مفہوم کے لئے شرط ۵۴

    لغت کی رو سے *** کا مفہوم ۱۶۹

    لعین شیطان کا نام ہے، اس کی وجہ ۱۸،۱۶۹،۲۳۷

    خد کی رحمت، معرفت سے بکلی تہی دست ملعون ہوتا ہے ۱۸

    مباہلہ

    عبدالحق غزنوی کے ساتھ مباہلہ کے بعد الٰہی تائیدات ۵۴۶

    متشابہات

    حق کا طالب ان کاموں میں رائے ظاہر نہ کرے جو متشابہات میں سے اور بطور شاذو نادر ہیں ۴۲۴ح

    متشابہات کاپہلو شریر انسانوں کے لئے امتحان کے لئے رکھاگیا ہے ۴۲۵ح

    مجدد

    کسی مجدد کے آنے کا مقصد اور سبب ۱۶۵

    محدث

    اس کا منکر کافر نہیں بن جاتا ۴۳۲ح

    مذہب

    زندہ مذہب وہی ہوتا ہے جو اپنے ساتھ تازہ بتازہ نشان رکھتا ہے ۳۷۱

    سچا مذہب وہی ہے جس کے ساتھ زندہ نمونہ ہو ۴۹۷

    خدا کی طرف سے سچے مذہب کے لئے ضروری ہے کہ ہمیشہ اس میں ایسے انسان پیدا ہوتے رہیں جو اپنے رسول کے نائب ہو کریہ ثابت کریں کہ وہ نبی اپنی روحانی برکات کے لحاظ سے زندہ ہے ۱۳۸

    یورپ میں مختلف مذاہب کی خوبیاں معلوم کرنے کی طرف توجہ۴۹۵

    حضرت اقدسؑ کی سچے مذہب کی سچائی کو پرکھنے کی ایک تجویز ۴۹۴

    مرشد

    روحانی مرشد خدا کی منشا اور توفیق سے تربیت کرتا ہے ۶۰۴

    مرہم عیسیٰ

    مسیح کے صلیب سے بچنے کی دلیل ۔ اس نسخہ کا ذکر طب کی صدہا کتابوں میں ہے ۵۶،۵۷

    اس کے خواص اور جن بیماریوں کے لئے یہ مفید ہے ۵۷

    مسیح موعود کے ظہور کے وقت تک کوئی اس سے تاریخی فائدہ نہیں اٹھا سکا ۶۴

    اسلام کا وجود بھی نہیں تھا کہ اس مرہم کا ذکر رومی، یونانی قرابادینوں میں موجود تھا ۶۳

    اس وہم کا ردّ کہ مسلمانوں نے عیسائی عقیدہ پر حملہ کرنے کے لئے جعلی طور پر یہ باتیں اپنی کتابوں میں لکھ دی ہیں ۶۳

    اس کا ذکر تقریباً ایک ہزار سے کچھ زائد کتب میں ہے ۶۱

    اگر اس شہادت کو قبول نہ کیا جائے تو پھر دنیا کے تمام تاریخی ثبوت اعتبار سے گر جاویں گے ۶۱

    مرہم کا دائرہ یورپ و ایشیا پر محیط ہے ۶۱،۶۳

    مرہم عیسیٰ کے استعمال سے تمام صلیبی زخم اچھے ہوئے اور حضرت مسیح شفا پا گئے ۲۴۴

    طب کی ان کتابوں کی فہرست جن میں مرہم عیسیٰ کا ذکر ہے ۵۸،۵۹

    یونانی سے ترجمہ کرتے ہوئے لفظ ’’شلیخا ‘‘ کو بعینہٖ عربی میں لکھنا اور اس میں حکمت ۶۰،۶۱

    یہ معلوم نہیں کہ صلیب کے بعد حضرت عیسیٰ ؑ نے الہام کے ذریعہ یہ مرہم تجویز فرمائی تھی یا کسی طبیب کے مشورہ سے تیار کی گئی۵۷

    اس وہم کا جواب کہ حضرت عیسیٰ ؑ کو نبوت سے قبل یا نبوت کے زمانہ کی چوٹوں کے لئے یہ مرہم تیار کی گئی ۶۲

    یہ ایک نہایت مبارک مرہم ہے ۴۹۸ح

    مسلمان

    مرتد ہونے والے مسلمانوں کا کفارہ کے دھوکا سے معاد کے فکر سے فارغ ہو جانا ۴۹

    خونی مسیح و مہدی کے منتظراور اس کا ردّ ۱۲۱،۴۹۲

    مسلمانوں کے لئے کامل اولیاء کے چار مراتب حاصل کرنے کی دعا سورۃ فاتحہ میں سکھائی گئی ہے ۴۲۳



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 659

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 659

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/659/mode/1up

    27

    دولتمند مسلمانوں میں السلام علیکم کے حوالے سے عیب ۴۶۸

    جو مسلمان سلطنت کے خلاف جہاد اور بغاوت کے خیال دل میں مخفی رکھتے ہیں وہ ظالم ہیں ۱۵۶

    مسلمانوں کا تمام نبیوں کو عزت کی نگاہ سے دیکھنا ۴۹۱

    مسلمانوں کی سخت دلی اور بد اخلاقی کا ذکر اور اس کا سبب ۳،۴

    جہاد کے حوالے سے دو قسم کے مسلمان ۵۱۹

    مسلمانوں کے دو عیبوں کا ذکر ۱۲۰

    مسلمانوں کے شریعت سے بیزاری کا ثبوت ۶۰۷

    مسلمانوں کو اس گورنمنٹ کی اطاعت کی تلقین ۱۱۴

    مسلمانوں کا عقیدہ کہ امام مہدی جو بنی فاطمہ سے ہو گا عیسیٰ کے ساتھ مل کر تمام غیر قوموں کو قتل کر ڈالیں گے ۶، ۷

    مسلمانوں کے ساتھ سب سے بڑی ہمدردی، اخلاقی حالت کی درستی اور خونی مہدی وغیرہ خیالات کی درستی ہے ۱۴

    مسلمانوں کے نزدیک اسلام سے ہمدردی کے معنی ۱۵۸

    وہ طریق جس سے مسلمان فرشتے بن سکتے ہیں ۴۹۳

    مسلمانوں کا چودھویں صدی کے مجدد کا انتظار کرنا اور جب وہ آگیا تو ان کا منہ پھر لینا ۴۰۵

    مسلمانوں اور دوسری قوموں سے فیصلہ کرنے کے لئے نشان نمائی کے لئے مقابلہ کی دعوت ۴۹۴

    ملہم

    اس کا منکر کافر نہیں بن جاتا ۴۳۲ح

    منظوم کلام

    اردو نظم

    کبھی نصرت نہیں ملتی درِ مولیٰ سے گندوں کو

    کبھی ضائع نہیں کرتا وہ اپنے نیک بندوں کو ۵۰۷

    الہامی اشعار

    قادر ہے وہ بارگہ ٹوٹا کام بناوے

    بنا بنایا توڑ دے کوئی اس کا بھید نہ پاوے ۲۱۳

    صادق آں باشد کہ ایام بلا

    مے گذارد با محبت باوفا ۳۴۱

    مسیح موعود علیہ السلام کی فارسی نظمیں

    جو اس جلد میں مذکور ہیں

    خود بروں آ از پئے ابراء من

    اے تو کہف وملج أ و ماواء من ۳۱۰

    عجب نوریست در جان محمد ؐ

    عجب لعلے ست در کان محمدؐ ۳۸۲

    حریفے کہ در شنبہ میداشت جاں

    بیک شنبہ از وے نماند نشاں ۳۹۴ح

    روئے دلبر از طلباراں نمی دارد حجاب

    می درخشد در خور و می تابد اندر ماہتاب ۳۹۵

    اے پئے تحقیر من بستہ کمر

    نیستت جز ہجو من کارِ دگر ۵۳۱ تا ۵۳۴

    مولوی

    چودھویں صدی میں قوم کے دل سخت، مولوی دنیا پرست اور اندھے اور احمق ہو جاتے ہیں ۲۹

    علماء ملک میں شور مچاتے ہیں کہ تیس ہزار کافر ہو گیا لیکن جب فیصلہ کے لئے بلایا جاتا ہے تو کہتے ہیں فضول کام ہے ۵۵۷

    مولوی ضروری کام کا نام فضول کام رکھتے ہیں ۵۵۶

    جو مولوی کے خطاب سے مشہور ہے وہ نہیں چاہتا کہ دوسرے کا عزت سے نام بھی لے ۴۶۸

    مولویوں کو نشان نمائی کی دعوت ۴۹۴

    مومن

    مومن فراست کے ساتھ اپنے نفس کا چابک سوار ہوتا ہے ۶۲۰

    مومن ایک ہی سوارخ سے دو مرتبہ نہیں کاٹا جاتا ۶۱۹



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 660

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 660

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/660/mode/1up

    28

    ن،و

    نبی

    سارے انبیاء کی بعثت کا مقصد ۶۵

    نبی کا کمال ۵۱۶

    نبی کی آل سے مراد ۳۶۳ح

    ولی اور نبی کے وجود میں متشابہات کا حصہ ۴۲۵ح

    نبی کے زندہ اور آسمان پر ہونے کا ثبوت ۱۳۸

    ایک غیر نبی کی نبی پر جزئی فضیلت ۴۸۱

    یہ عادت ہے کہ خبیث ہر نبی پر الزام لگاتے ہیں ۴۵۳ح ح

    انبیاء پر ایک مرتبہ موت کا خوف یا موت کے مشابہ حالت ضرور وارد ہوتی ہے ۵۲۱ح

    خدا کے کامل مامورین کی علامت کہ ان سے آسمانی نشان ظاہر ہوتے ہیں ۱۳۷

    نبی کے کلام میں جھوٹ جائز نہیں ۲۱

    سب سے بڑا وہ نبی ہے جس نے لاالٰہ الا اللہ کے مضمون کو بہت چمکایا ۶۵

    منصب نبوت پر فائز ہونے والے لوگوں کے لئے

    سنت الٰہی ۲۸۰، ۲۸۱

    اُن انبیاء کی شان کا ذکر جو اپنے دعویٰ کے انکار کرنے والے کو کافر کہتے ہیں ۴۳۲ح

    جو اولیاء کا انکار کرے رفتہ رفتہ سلسلہ نبوت بھی اس پر مشتبہ ہو جاتا ہے ۴۳۵ح

    پہلے سب رسولوں سے ٹھٹھا کیا گیا ۴۶۳

    ہر نبی کی مخالفت ہوتی ہے اور بہتان لگائے جاتے ہیں ۵۱۳

    خدا کی طرف سے سچے مذہب کے لئے ضروری ہے کہ ہمیشہ اس میں ایسے انسان پیدا ہوتے رہیں جو اپنے رسول کے نائب ہو کریہ ثابت کریں کہ وہ نبی اپنی روحانی برکات کے لحاظ سے زندہ ہے ۱۳۸

    اللہ کی قوت سے تمام نبی تحدی کے طور پر اپنے معجزانہ نشان دکھلاتے رہے ہیں ۵۱۰

    مسلمانوں کا تمام نبیوں کو عزت کی نگاہ سے دیکھنا فرض ہے ۴۹۱

    نشان

    زندہ مذہب اپنے ساتھ تازہ بتازہ نشان رکھتا ہے ۳۷۱

    اللہ کی قوت سے تمام نبی تحدی کے طور پر اپنے معجزانہ نشان دکھلاتے رہے ہیں ۵۱۰

    دکھ دئے جانے اور صدق کے مشتبہ ہونے پر ہمارا حق ہے کہ ہم خدا کے آگے روئیں اور نشان مانگیں ۵۱۴

    تین ہزار سے زیادہ نشان ظاہر ہو چکے ہیں ۱۴۰

    میری جماعت کے ایک ہزار متدین نیک چلن قرآن ہاتھ میں لے کر نشان دیکھنے کا ثبوت دے سکتے ہیں ۳۳۴

    تائید میں اس قدر نشان ظاہر ہوئے کہ تیرہ سو برس میں امت میں کسی کے لئے ظاہر نہیں ہوئے ۳۳۶

    تریاق القلوب میں ایک سو سے زیادہ نشان درج ہیں۵۱۱،۵۴۳

    نبی کریمؐ اور دوسرے انبیاء سے اقتراحی نشانات مانگے گئے

    ۵۳۹،۵۵۸

    صلحاء کا یہ طریق نہیں کہ خدا کو محکوم بنا کر کوئی بات امتحان کے طور پر مانگی جائے ۵۶۰

    حضرت اقدسؑ کا اللہ تعالیٰ سے تین سال کے عرصہ میں استجابتِ دعا کے حوالے سے نشان طلب کرنا ۵۰۹،۵۱۵

    گورنمنٹ کی زیرنگرانی سب مخالفین کو نشان نمائی کی دعوت ۴۹۴

    نور

    نور اپنے وقت پر اترتا ہے ۶۵

    جو چیز آسمان مین چمکتی ہے وہ ضرور زمین کو بھی منور

    کرتی ہے ۶۴

    نور نور کو اپنی طرف کھینچتا ہے اور تاریکی تاریکی کو کھینچتی ہے ۱۱۷

    والدین

    ظلی طور پر ربوبیت کے مظہر ہوتے ہیں ۶۰۲

    خدا کی اطاعت کے ساتھ ان کی اطاعت کا حکم ۶۱۹

    والدین کا اپنی اولاد پر احسان کسی مقصد کے تحت بھی

    ہوتا ہے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 661

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 661

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/661/mode/1up

    29

    وعید دیکھئے ’’پیشگوئی‘‘

    ولی

    فہم قرآن اور معارف کی اعلیٰ حقیقت تک کی وصولی کا کمال اولیاء کو دیا جاتا ہے ۴۱۸

    مرتبہ شہادت جو اولیاء کو دیا جاتا ہے ۔ اس سے مراد ۴۲۰

    قرآن کی طرح ولی اور نبی کے وجود میں بھی متشابہات کا حصہ ہوتا ہے ۴۲۵ح

    اس سوال کا جواب کہ جو رسول، نبی اور ولی ہیں کیوں خدا تعالیٰ نے ان کے حالات کو عوام کی نظر میں مشتبہ کر دیا ۴۲۲ حاشیہ

    ولایت اور قبولیت کی علامت میں ایک لازمی شرط، امور غیبیہ اور پوشیدہ باتوں کا بکثرت ظہور ہونا ہے ۴۱۷

    اللہ کا ولایت کے مرتبہ سے سرفراز فرمانے والوں کو ہمعصر لوگوں سے چار قسم کے امتیاز کلی بخشنا ۴۱۷

    اکابر کا آخری آدم کو ولایت عامہ کا خاتم سمجھنا ۴۸۱

    ولایت کے مقام پر وہی پہنچ سکتا ہے جس کو عنایت ازلی نے قدیم سے دنیا کو فائدہ پہنچانے کے لئے منتخب کیا ہو ۴۱۷

    قرآن کی اعلیٰ درجہ کی تعلیم جس تک اولیاء کے علاوہ کوئی اور نہیں پہنچ سکتا ۴۱۸

    اولیاء کا اول مرتبہ صدق دنیا سے نفرت اور ہر ایک لغو امر سے طبعی کراہت ہے ۴۱۸

    اولیاء کا دوسر ا درجہ انس، شوق اور رجوع الی اللہ ہے ۴۱۹

    اولیاء کے صدق کا تیسرا درجہ تبدل اعظم، انقطاع اثم، محبت ذاتیہ اور فنا فی اللہ کا درجہ ہے ۴۱۹

    فنا فی اللہ کے مقام پر اولیاء کی حالت ۴۱۹

    کمالِ نبوت سے موسوم کمال جو اولیاء کو دیا جاتا ہے ۴۱۸

    تیسرا کمال جو اکابر اولیاء کو دیا جاتا ہے وہ مرتبۂ شہادت

    ہے ۴۱۰

    ولی کا وہ درجہ جہاں وہ صدیق کے نام سے موسوم ہو

    جاتا ہے ۴۱۹

    چوتھا مرتبہ کامل اولیاء کو جوملتا ہے وہ صالحین کا ہے ۴۲۲

    اولیاء اللہ، نبی، رسول اورمحدث کی دو اقسام اور ان کی تفصیل ۲۷۶ تا ۲۷۹

    اہل کمال لوگوں کے بعض کام جن کی سمجھ نہیں آتی ۴۲۳ ح

    اولیاء کے مقابلہ سے سلب ایمان کا خطرہ ۵۳۷

    مردانِ کارِ زار سے مراد ۱۳۱ ح

    خدا کے پیارے آسمان پر بادشاہت رکھتے ہیں گو زمین پر ان کے سر رکھنے کے لئے بھی جگہ نہ ہو ۱۳۳ ح

    خدا سے ایک ابدی نور پانا جو انہیں متکبر نہیں بنا سکتا ۴۶۵

    وہ مقام جہاں انسان خدا کی شکل دیکھنے کے لئے آئینہ

    ہو جائے ۲۶۹

    اولیاء اور مقربین الٰہی کے انکار کرنے والوں کی حالت

    ۴۳۲ح، ۴۳۴

    جو اولیاء کا انکار کرے رفتہ رفتہ سلسلہ نبوت بھی اس پر مشتبہ ہو جاتا ہے ۴۳۵ح

    وہابی

    نزول مسیح کے حوالہ سے عیسائیوں کی نسبت ان کا عقیدہ ۶

    خونی مہدی اور مسیح کے عقیدہ کے باوجود منافقانہ طور پر حکام کی خوشامد کرنا اور ایسے عقائد کی مخالفت کرنا ۹

    ہ،ی

    ہندو مذہب

    ہندو ہمیشہ تاریخ نویسی میں بہت کچے رہے ہیں ۷۶

    ان کا مذہب مردہ ہے اور کوئی ان کے لئے زندہ فیض رسان موجود نہیں ۱۴۱

    ان میں صرف پرانے قصے ہیں زندہ نمونہ نہیں ہے ۴۹۷

    ہندوؤں کے بقول رشیوں کے دلوں پر وید کا پرکاش ہوا تھا ۱۳۹

    ہندو مذہب پر عقلی اور کراماتی طور پر اسلام کی حجت پوری

    ہو گئی ۲۳۶

    ہندوؤں کے نزدیک انسانی پاکیزگی کا نمونہ نیوگ ہے جو پنڈت دیانند نے ان کو سکھلایا ۲۳۵

    ہندوؤں نے پرمیشر کے افعال اور اس کی قوت اور شکتی کو

    صرف انسانوں کی قوت اور شکتی پر قیاس کر لیا ہے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 662

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 662

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/662/mode/1up

    30

    ہندوؤں کے نزدیک پرمیشر خالق نہیں بلکہ جوڑنے

    والا ہے ۲۳۳

    ہندوؤں میں نصف کے قریب وہ فرقے ہیں جو پرمیشر کے وجود سے ہی منکر ہیں ۲۳۳

    اسلامی بادشاہوں کا ہند کے پنڈتوں کو بڑی بڑی تنخواہوں پر رکھ کر ترجمے کروانا ۶۰

    خوارق اور کرامتوں کے منکر ۲۳۵

    ہندو مذہب کے اسلام کی طرف زور کے ساتھ رجوع کی پیشگوئی ۴۷۱

    یہود

    یہود کے دو فرقوں کا کم علمی اور تعصب کی وجہ سے نبی کریم ؐ کو مثیل موسیٰ نہ ماننا ۱۶۲

    اس زمانہ کے فاضل یہودی کی گواہی کہ کسی نبی نے یہود کو جسمانی خدا کے ظاہر ہونے کی امید نہیں دلائی ۱۶۱، ۱۶۲

    ایک گروہ یہودیوں کا بدھ مذہب میں داخل ہو چکا تھا اس لئے حضرت مسیح نے بدھ مذہب کے لوگوں کی طرف توجہ کی ۷۵

    یہود میں کسی مصلوب کی زندگی کے خاتمہ کا یہ دستور تھا کہ جو صلیب پر کھینچا گیا ہو اس کو کئی دن صلیب پر رکھتے اور پھر اس

    کی ہڈیاں توڑی جاتی تھیں ۲۷

    مسیح کے زمانہ میں یہود میں قبروں کا طرزِ تعمیر ۲۱،۲۶

    یہود کے الوہیت مسیح کے عقیدہ کو رد کرنے کی وجہ ۱۶۱

    یہود کا موسیٰ کے بعد چودھویں صدی میں آنے والے مسیح

    کو ملحد و کافر ٹھہرانا ۲۹

    یہود کا مسیح ؑ کے قتل کے مشورہ کے لئے قیافا نامی سردار کے گھر میں اکٹھا ہونا ۳۱

    مسلمانوں کی طرح یہود بھی قمری حساب رکھتے تھے اور رات دن پر مقدم سمجھی جاتی تھی ۲۳

    یہودیوں کے لئے حرام تھا کہ کسی کو سبت یا سبت کی رات میں صلیب پر رہنے دیں ۲۳

    یہودیوں کی صلیب کی کیفیت ۲۲

    یہود کے خدا کی نظر میں *** ٹھہرنے کی وجہ ۴۵۵ح

    ایلیا نبی کے دوبارہ آنے کے عقیدہ میں ان کا غلطی پر ہونا۴۶۴ح

    حضرت مسیحؑ کے دور میں ان میں خانہ جنگی بڑھی ہوئی تھی ۵۲۱

    عبرانی یہود کی قدیمی زبان ہے جس میں خدا کی کتابیں تھیں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 663

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 663

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/663/mode/1up

    31

    اسماء

    آ،ا

    آتماسنگھ، بدوملہی ۱۹۰

    آدم علیہ السلام ۳۶۵ح

    حضرت آدم ؑ کی پیدائش پر فرشتوں کے اعتراض کرنے والے قصہ میں ایک مخفی پیشگوئی ۴۲۳ ح

    آدمؑ کے وجود کے سلسلہ دوریہ کا حضرت اقدسؑ پر ختم ہونا۴۷۵

    حضرت اقدس ؑ کی آدمؑ کے ساتھ مشابہتیں ۴۷۹

    اہل کشف کا بیان کرنا کہ آخری مہدی خدا سے آدم کی طرح براہِ راست ہدایت پائے گا ۴۴۹

    آخری آدم کا نام عیسیٰ رکھا جانا ۴۸۰

    آزر

    حضرت ابراہیم ؑ کے والد ۵۶۹

    آسف ۸۲

    آصف ۱۰۱

    آفرید ابن کران افغان ۱۰۱

    آفریدی(ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    آمنہ، حضرت

    ان کے شکم میں آنحضرتؐ کا نام محمدؐ رکھا گیا ۵۲۲

    آہنگر ،حاجی بھیرہ ۱۸۹

    آئی سنگ ۸۵

    ایم ڈبلیو ڈگلس

    حضرت اقدس ؑ کے نام وارنٹ کی بجائے سمن جاری کرنا ۳۴۶

    وہ ایک زیرک اور دانشمند اور منصف مزاج مجسٹریٹ تھا ۳۴۷

    حضرت اقدس مسیح موعود علیہ السلام کے خلاف پادری مارٹن کلارک کے مقدمہ اقدام قتل کا حضور کے حق میں فیصلہ کرنا ۳۳

    اے ۔ ای۔ مارٹینو ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ امرتسر

    اس نے حضور ؑ کی گرفتاری کے لئے وارنٹ جاری کیا ۳۴۴

    ابدال ۱۰۰

    ابدالی ۱۰۰،۱۰۸

    ابراہیم علیہ السلام ۲۸۵،۵۶۹

    نبی کریمؐ کا ان کی خُو اور طبیعت پر آنا ۴۷۶

    نبی کریم ؐ اور ان کی مشابہتیں ۴۷۶ح

    آپ کے واقعات واقعہ صلیب سے کم نہ تھے ۵۲۱ح

    ابراہیم بیگ،مرزا

    اس کی وفات کی خبر کی پیشگوئی ۴۱۶

    ابگیرس(نصیبین کا بادشاہ) ۶۸ح

    ابن ابی صادق ۵۹

    ابن حزم ،امام

    آپ وفات مسیح ناصری کے قائل تھے ۵۸۷

    ابن عباس رضی اللہ عنہ

    اجماع صحابہ پر وفات عیسیٰ ابن مریم والی حدیث کے راوی ۵۷۹

    توفی کے معنی موت کے کرنا ۴۵۸ح

    ابو ابراہیم اسماعیل بن حسن الحسینی ۵۹

    ابو الفضل ۱۰۳

    ابوالحسن تبتی ۴۳۷،۴۵۰



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 664

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 664

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/664/mode/1up

    32

    حضرت اقدسؑ کے خلاف گالیوں سے باز آنا ۴۳۶

    ابو المنار ابی نصر العطار الاسرائیلی الہارونی ۵۹

    ابو امامہ رضی اللہ عنہ ۴۴۹

    ابو بکر رضی اللہ عنہ ۳۶۴ح، ۵۸۱، ۵۸۲، ۵۸۶،۵۸۷

    آپ کا آنحضرت ؐ کی وفات پر خطبہ ۴۶۱ح،۵۸۰،

    خلافت ابوبکر پر صحابہ کا اجماع ۵۷۷

    حضرت ابوبکرؓ نے آنحضرت ﷺ کی وفات پر تمام انبیاء کی وفات کی دلیل دی ۵۴۲

    روافض کا حضرت ابوبکرؓ اور حضرت عمرؓ پر انواع و اقسام کے عیوب لگانا ۴۲۱

    امت پر آپؓ کا ایک احسان ۴۶۲ح

    ابوجہل

    امت کے اس فرعون کا بدر میں ہلاک ہونا ۵۲۳

    ابو ریحان ۶۰

    ابو سفیان

    آنحضرت ؐ کی نسبت قیصر کے دربار میں پردہ دری کے خوف سے سچ مچ بتانا ۳۷۴

    ابو نصر فارابی ۶۰

    ابوہریرہ رضی اللہ عنہ ۵۶

    ابو یمامہ رضی اللہ عنہ ۴۴۹

    اُبی بن خلف

    قتل کے وقت اس کے گلے سے بیل کی طرح آواز نکلنا ۳۸۰

    ابی بن یمین ساکن شہر ٹولیڈو (سپین)

    اس کے مطابق گمشدہ قبائل چین، ایران اور تبت میں ہیں ۹۲

    ابی بکر محمد ابن الولید الفہری الطرطوشی ۷۱

    احمد اللہ (مولوی) ۲۲۴

    احمدبخش ،حافظ ،پٹواری ۱۸۶

    احمد بن منشی زین الدین میاں، انجینئر بمبئی ۱۸۳

    احمد بیگ ۵۳۴

    اس کے متعلق پیشگوئی کے دو حصے ۵۵۴

    اس کی اور آتھم دونوں کی پیشگوئیاں رجوع الی الحق اور توبہ کی شرط کے ساتھ مشروط تھیں ۵۳۴

    احمد بیگ کے رشتہ دار اس کی موت کا ہولناک نمونہ دیکھ کر یونس کی قوم کی طرح توبہ، صدقہ اور خیرات میں مشغول ہو گئے ۵۳۵

    احمد، پیرنمبرداربدوملّی ۱۸۹

    احمدحسین فریدآبادی ۱۸۱

    احمد خاں،بمبئی ۱۸۲

    احمدخاں،کنسٹیبل ۱۸۵

    احمددین ،بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۷۵

    احمدشاہ ،سیّد،مشہدی ۱۹۱

    احمدشاہ ،قاضی ۱۷۶

    ادریس علیہ السلام

    ان کے زندہ بجسم عنصری آسمان پر جانے کا عقیدہ ۵۷۸

    بنی اسرائیل کی قوموں کی بابت ان کی پیشگوئی ۹۵

    ارباب سرور خاں

    اس نے حضرت اقدسؑ کو 10 روپے بھیجے ۲۵۹

    ارباب محمد لشکر خاں ۲۵۹

    ارکش(گرگشت) اس کے بیٹوں کے نام ۱۰۰

    ارمغان بن ارمیاہ ۱۰۱



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 665

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 665

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/665/mode/1up

    33

    ارمیاہ ابن طالوت ۱۰۱

    اسحاق ؓ ،میر (برادرنسبتی حضرت مسیح موعود ؑ )

    آپؓ کی و فات کی جھوٹی خبر پر مسیح موعود علیہ السلام کو الہاماً بتایا جانا ۲۹۶

    اسرائیل ۶۰


    اسماعیل علیہ السلام ۵۲۲

    اسمٰعیل آدم،میمن ۱۸۳

    اعظم بیگ

    اس نے بے دخل شرکاء سے مل کر حضرت مرزا غلام قادر کے خلاف مقدمہ کیا اور اس کے حق میں فیصلہ ہوا ۲۰۹

    اعظم علی سید ۱۷۸

    افغان

    افغان کی نسل کے ۲۴ فرقوں کے اسماء ۱۰۰،۱۰۱

    ان کے متعلق ڈاکٹر وولف کی رائے ۹۷

    افغان اس بات کو مانتے ہیں کہ وہ قیس کی اولاد میں سے ہیں جو بنی اسرائیل میں سے ہیں ۷۰

    افغان۔ یہ نام عبرانی معلوم ہوتا ہے جس کے معنی بہادر ہیں ۶۹

    افغانوں کے مسلمان ہو جانے کی وجہ سے ان کا یہودیوں کے نام اپنے نام رکھنے کے خیال کا ردّ ۱۰۳

    افغانوں میں روایت کہ بخت نصر نے یروشلم کی فتحیابی کے بعد انہیں غور میں بسایا اور خالد بن ولید کی آمد سے قبل وہ یہودی تھے۹۷

    افغان کے تین بیٹوں کا ذکر ۱۰۰

    افغان سردار بسربراہی قیس طالوت کی اولاد سے تھا ۱۰۲

    سارے پٹھانوں کا پشتو زبان کو اختیار کرنا ۱۰۵

    ملک طالوت کے دو بیٹے تھے۔ ایک کا نام افغان دوسرے کا جالوت۔ افغان نسل ہندوستان جا بسی ۹۹

    افغانوں کی قوم کا تاریخی شیرازہ نہایت درہم برہم ہے ۷۰

    افلاطون ۵۹

    اقبال الدولہ (نواب) ۲۶۰

    اکبرخاں صاحب میرووال ۱۸۹

    التاج السبکی ۵۸۰

    السدید الکاذرونی ۵۹

    الف دین مگولہ ضلع سیالکوٹ ۱۹۰

    الکسیس کام نی نس شہنشاہ قسطنطنیہ ۹۶

    اللہ بخش ،جھنگ ۱۸۸

    اللہ بخش کنسٹیبل ۱۸۵

    اللہ جوایا آہنگر ،بھیرہ ۱۸۹

    اللہ دتا ،بھیرہ ۱۸۹

    اللہ دتہ ، مدرس مشن سکول جہلم ۱۸۶

    اللہ دیا خاں ۱۷۸

    اللہ دین ، محلہ لوہاراں ضلع شاہ پور ۱۸۸

    اللہ دین ،حاجی نقشبندی مجددی ۱۷۹

    اللہ دین خاں سارجنٹ دوم ۱۸۵

    اللہ رکھا ۔عبدالرحمٰن تاجرمدراسی ، حاجی ۳۱۰

    اللہ ودھایا،منشی ضلع شاہ پورتحصیل بھیرہ ۱۷۳

    الٰہی بخش رفوگر، صوفی ۱۸۵

    الٰہی بخش فاروقی ، مولوی ۱۸۲

    الٰہی بخش (منشی) اکونٹنٹ ۲۵۹

    الگزنڈر برنس

    ایک افغانی روایت کا ذکر کرنا جس کے مطابق بنی اسرائیل غور میں رہتے تھے ۹۸



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 666

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 666

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/666/mode/1up

    34

    الیاس علیہ السلام

    ان کا زندہ بجسم عنصری زمین پر موجود ہونے کا عقیدہ ۵۷۸

    امام بخش مستری


    امام دین، گارڈریلوے راولپنڈی ۱۸۰

    امام علی شاہ ،سیّد حکیم نورپور ۱۹۱

    امدادحسین ،شیخ ۱۸۷

    امیراللہ مستری ۱۷۸

    امیرخسرو، گجراتی ۱۸۵

    امیرشاہ ۱۸۴

    انوارحسین خاں،رئیس شاہ آباد ضلع ہردوئی ۱۸۶

    انشاء اللہ ، مولوی ، ایڈیٹر اخبار وکیل امرتسر ۴۱۴

    اوریا ۵۱۴

    اولڈ ہنرگ ۷۳ح

    اولڈن برگ ۸۰،۸۱،۸۸

    ای بیلفور

    یہود کے وسط جنوب اور مشرق میں پھیلنے کا ذکر ۹۶

    اے کے جانسٹن

    کشمیریوں کی یہودیوں سے مشابہت کا ذکر کرنا ۱۰۴

    ایچ ٹی پرنسب ۸۲

    ایوب علیہ السلام

    حضرت ایوبؑ کی پیشگوئی جمالی تھی ۳۶۶

    ایلیا (الیاس علیہ السلام)

    مسیح کا ان کی آمد ثانی کی وضاحت کرنا ۴۶۲ح

    آپ کا یحییٰ کی خو اور طبیعت پر آنا ۴۷۶

    ب،پ،ت

    باب ولد کرلن ۱۰۱

    بابور ولد سرابند ۱۰۰

    بابوری(ایک افغانی قبیلہ) ۱۰۰

    بابی(ایک افغانی قبیلہ) ۱۰۱

    بخت نصر شاہ بابل (Nabuchad Nazer)۱۰۲

    یہود کو قید کرنا ۹۵

    یہود کو جلا وطن کرنا ۱۰۱،۱۰۲

    بدرالدین ،مولانا مولوی ۱۸۱

    بدھ علیہ السلام

    بدھ کے واقعات حضرت مسیح کے زمانہ تک قلمبند نہیں ہوئے تھے۷۶

    گوتم کے ایک ہزار سال بعد ایک اور بدھ کے نزول کی پیشگوئی ۸۳

    گوتم بدھ نے ایک اور آنے والے بدھ کی پیشگوئی کی جس کا نام متیّا بیان کیا گیا ہے ۸۰

    بدھ نے بگوا متیا میں آنے والے کی دو علامتوں کا ذکر کیا ہے ۸۴

    گوتم بدھ سیاہ رنگ کا تھا ۸۴

    مؤرخین کے مطابق بدھ کانام ایشیا کا نور عین مناسب ہے ۸۱

    بنی اسرائیل کا ہندوستان میں آ کر بدھ مذہب میں شامل ہونا اور ان کا بت پرستی اختیار کرنا ۵۳

    تبت کے علاقہ میں بدھ مذہب اور عیسائیت میں شدید مشابہت ہے ۹۰

    یہ الزام کہ بدھ خدا کا منکر ہے یہ محض افتراء ہے وہ وید انت کا منکر اور ان جسمانی خداؤں کا منکر ہے جو ہندو مذہب میں بنائے گئے تھے۹۱

    بدھ اور مسیح کی اخلاقی تعلیم کا موازنہ ۷۶،۷۷

    بدھ کے آزمائش کے دنوں میں چالیس روزے رکھنا۔ مسیح نے بھی رکھے تھے ۷۶



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 667

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 667

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/667/mode/1up

    35

    اس کی اخلاقی تعلیم کا وہ حصہ بعینہٖ انجیل کی تعلیم ہے اور عبارتوں میں یہ حضرت مسیح کے اس ملک میں آنے کے وقت ملایا گیا ۷۶ح


    بدھ کی اپنے مذہب کی پانچ سو برس تک رہنے کی پیشگوئی ۸۰

    بدھ کا شیطان کے ذریعہ آزمایا جانا ۷۳

    بدھ کے عقائد کا ذکر ۹۱،۹۲

    مسیح اور بدھ کے خطابوں اور واقعات میں مشابہت ۷۲

    بدھ موجودہ وید کو صحیح نہیں مانتا تھا ۹۱

    بدھ مذہب کی کتابوں سے مسیح کے پنجاب و کشمیر میں آنے کے ثبوت ۷۲

    بدھ تین قسم کے تناسخ کا قائل تھا ۹۰،۹۱

    حضرت بدھ کا اپنے بچے اور بیوی کو چھوڑنے والا واقعہ بے ہودہ اور لغو اوربدھ کی شان کے برخلاف ہے ۸۸

    برچ ۱۰۰

    برچی(ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    برخیاہ ۳۴

    برکت علی ،میرووال ۱۸۹

    برنہار ڈ ڈورن ۱۰۱،۱۰۳

    برنیر،ڈاکٹر ۱۷ح،۹۴

    اس کا لکھنا کہ کشمیری یہودی الاصل ہیں ۱۷،۱۰۴

    برون، مسٹر پلیڈر، چیف کورٹ ۳۱۱،۳۲۹

    ۲۱ نومبر ۱۸۹۸ء کے اشتہار کی ذلت کی پیشگوئی کے پورا ہونے کی شہادت دینا ۳۱۰،۳۱۲،۴۳۸

    برہان الدین ، مولوی ۲۰۳

    بسر براہی قیس ۱۰۲

    بسم اللہ شاہ پانی پتی ۱۷۸

    بشمبرداس ۱۹۳،۱۹۴،۱۹۵

    حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی دعا سے اس کی قید نصف ہوئی

    بشنداس

    اس کا پیشگوئی کے مطابق عبد اللہ کے بھیجے ہوئے پیسے لانا ۲۲۹

    بشیر احمد اول (فرزند حضرت مسیح موعود ؑ )

    آپ نے سولہ ماہ کی عمر میں وفات پائی ۲۸۹ح

    بشیر الدین محمود احمدرضی اللہ عنہ

    حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے کشفًا آپ کا نام دیوار پر لکھا ہوا دیکھا محمود اور آپ کے بارے میں سبز اشتہار ۲۱۴،۲۱۸

    بشیر حسین ، سید ۳۱۱

    بلعم

    اولیاء کا انکار کرنے والوں کے پاس صرف لفاظی اور زبانی

    قیل و قال رہ جاتا ہے ۴۳۴ح

    بلیو

    افغانیوں کے بنی اسرائیل ہونے کے متعلق رائے ۱۰۶

    بنگنیش ۱۰۱

    بنگنیشی(ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    بو علی سینا ۵۸،۶۱،۴۹۸

    بہاؤ الدین ، شیخ

    اس نے حضور ؑ کو ۵۰ روپے تحفہ بھیجے ۲۵۵

    بہاؤالدین، مخدوم ۱۷۸

    بھگت پریم داس ۳۴۹

    بھیم سین، لالہ

    لالہ بھیم سین کو حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بتایا کہ امسال تمام کار مختاری کا امتحان دینے والے فیل ہو جائیں گے سوائے لالہ صاحب کے ۲۵۶



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 668

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 668

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/668/mode/1up

    36

    بہادردین ،پیرسیّدگیلانی ۱۸۸

    بیربل صاحب بدوملی ۱۹۰

    بین مر ۶۸ح

    پٹھان

    آنحضرت ﷺ کا سرداروں کا نام پٹھان رکھنا ۱۰۲

    پرسٹر جان شہنشاہ تاتار

    اس کا تحریر کرنا کہ دریا کے پار بنی اسرائیل کے دس قبائل آباد ہیں۹۶

    پریم داس ولدبوٹاشاہ ساہوکار ۱۸۰

    پہطان(پٹھان) افغانوں کا نام ۹۶

    پیلاطوس ۵۲۰

    وہ خوش قسمت تھا کہ اس نے مسیح کو دیکھا لیکن قیصر نے اس نعمت کو نہ پایا ۲۸

    ایک خدا ترس اور نیک دل آدمی تھا۔ کھلی کھلی رعایت سے قیصر سے ڈرتا تھا۔ تاہم مسیح کی رعایت کرنا ۲۷، ۲۸

    پلاطوس کی بیوی کو مسیح کی صداقت کے لئے خواب آنا۲۳،۲۴،۵۲

    پین ۱۰۰

    پینی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    ت،ٹ،ث،ج

    تاج الدین سید، شیرسوار ۱۷۸

    تاج الدین، میاں تحصیلدار بٹالہ

    انہوں نے مقدمہ ٹیکس میں نیک نیتی اور انصاف سے تحقیق کرکے حضور کو بری کر دیا ۳۳۰

    تکان ۱۰۰

    تکانی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    توکل شاہ، سائیں ۱۷۸

    تیجا سنگھ ، راجہ ۲۵۶

    حضور ؑ کو خدا نے بذریعہ الہام اس کی وفات کی اطلاع دی ۲۵۶

    ٹھاکرداس اروڑا ۱۹۰

    ٹی ڈبلیو رائس ڈیوڈس ۷۳

    ٹے سے ٹس

    اس کا ایک بڑے منجی کے انتظار کا ذکر کرنا ۸۲

    ثابت بن مرہ ۶۰

    ثناء اللہ امرتسری ۲۲۴،۴۴۵تا۴۵۰

    ثناء اللہ امرتسری کا اخبار عام میں یہ مضمون شائع کرنا کہ ابھی بٹالوی کی کچھ ذلت نہیں ہوئی ۴۴۵

    جابررضی اللہ عنہ ۵۶

    جان محمد (امام مسجد) ۲۲۸

    جان محمد ساکن قصبہ سرساوہ ۱۷۸

    جان محمد میاں ۲۶۱،۲۷۳

    جان محمد مرحوم کو حضرت اقدس ؑ نے بتایا کہ میری سید خاندان میں شادی ہو گی اور اس سے اولاد ہو گی ۲۰۱

    جان میلکم ، سر

    افغانیوں کے ظاہری خط وخال کا فارسیوں، تاتاریوں اور ہندوؤں سے الگ ہونے کا ذکر کرنا ۱۰۴

    جعفر زٹلی ۳۱۴ح،۳۲۸،۴۳۵تا۴۳۹،۴۴۴،۴۵۰

    اس کا حضرت اقدس ؑ کے خلاف بد زبانی سے باز نہ آنا ۳۲۷ ح،۳۹۷ح

    اس کا گندی گالیوں سے توبہ کرنا اور اس کی وجہ ۴۳۵

    مولوی کہلا کر اس کے گندے اخلاق ۴۳۷



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 669

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 669

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/669/mode/1up

    37

    جعفرخان امیدوارنقشہ نویس راولپنڈی ۱۸۶

    جلال بخاری رحمۃ اللہ علیہ، سید ۱۷۸

    جمال الدین ، خواجہ

    مقدمہ انکم ٹیکس میں آمد و خرچ کے حساب میں حضور کی معاونت کرنا۲۳۰

    جمال دین صاحب سٹیشن ماسٹرڈومیلی ۱۸۰

    جمورین ۱۰۰

    جمورینی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    جمیتا نمبردار ۱۹۱

    جنت(حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی بہن)

    حضرت اقدسؑ کے ساتھ اس کا توام پیدا ہونا ۴۷۹

    جوالہ سنگھ ۱۹۰

    جوزف شرنا ۹۸

    جوزی فس

    عزرا نبی کے ساتھ شہر میں جانے والے یہودیوں کا دریائے فرات کے اس پار رہنے کا ذکر کرنا ۹۷

    جون سٹرنا، کونٹ ۹۷

    جہاں داد خاں

    ایک نشان کے گواہ جس کے پورا ہونے پر بیعت کرنا ۲۰۶

    جھنڈا سنگھ ۲۰۶

    جھنڈے شاہ، مدرس مشن سکول بدوملّی ۱۹۰

    جیون سنگھ نمبردار ۱۹۱

    جے۔ آر۔ ڈریمنڈ

    ایک مقدمے میں جج ۳۴۲،۳۴۹

    جے ایم ڈوئی بہادر، ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ ضلع گورداسپور

    ۳۰۹،۳۱۱، ۴۳۳، ۴۳۸، ۴۴۷، ۴۴۸ ۴۵۹، ۴۶۱

    اس کی عدالت میں حضور کا مقدمہ ۳۴۱

    اس کا بٹالوی سے اس اقرار پر دستخط کروانا کہ وہ آئندہ حضرت اقدسؑ کو دجال، کافر اور کاذب نہیں کہے گا ۴۳۱

    جی ٹکاسو ۸۵

    جیروم، سینٹ

    بنی اسرائیل کے دس فرقوں کو شاہ پارتھیا کی قید میں ہونے کا ذکرکرنا۹۷

    جیمز برائیس ۹۸

    چ،ح،خ

    چراغ الدین ، بھیرہ ۱۸۹

    چراغ الدین ، بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۸۸

    چراغ الدین ، نمبردارموضع نمن ۱۹۰

    چندشاہ سیّدنمبردار ۱۹۱

    چنڈانمبردارجلووالی ۱۹۱

    چنگیز خان ۹۵

    حاکم ، نمبردار بدوملّی ۱۹۰

    حامد علی ، شیخ ۲۰۰،۲۰۲، ۲۲۸، ۲۵۳، ۲۶۱، ۲۶۵، ۲۷۳

    ۲۹۰، ۲۹۱، ۲۹۳، ۲۹۴،۲۹۵، ۲۹۶

    حضرت مسیح موعود ؑ کے بہت سے نشانات کے گواہ ۱۹۶،۲۰۰

    حضرت اقدس ؑ کا فرمانا کہ یہ میرے پاس رہتا تھا ۲۰۰

    حبیب الرحمٰن شاہ جمالی ۱۷۸

    حبیب اللہ ۱۸۸



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 670

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 670

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/670/mode/1up

    38

    حبیب اللہ ، قلعہ دیدارسنگھ ۱۸۲

    حبیب اللہ ، سیّد ۱۸۳

    حبیب اللہ پراچہ ۱۸۹

    حسان بن ثابت رضی اللہ عنہ

    آپ کا آنحضرتؐ کی وفات پر مرثیہ کہنا ۵۸۳

    حسن رضی اللہ عنہ

    خدا کے برگزیدہ،صاحب کمال اور صاحب عفت ائمۃ الہدیٰ میں سے تھے ۳۶ح

    آپ آنحضرت ؐ کے جسمانی اور روحانی آل تھے ۳۶۵

    حسن میاں بانگی ۱۸۳

    حسین رضی اللہ عنہ ۲۷۴ح

    آپ آنحضرت ؐ کے جسمانی اور روحانی آل تھے ۳۶۵

    خدا کے برگزیدہ،صاحب کمال اور صاحب عفت ائمۃ الہدیٰ میں سے تھے ۳۶ح

    حسین ، سیّد، سجادہ نشین بدوملّی ۱۹۰

    حسین بک کامی وائس قونصل ترکی

    اس کے لاہور وغیرہ میں آنے کا مقصد ۴۰۷

    اس کا حضرت اقدس ؑ کے پاس آنا ۴۰۷

    پرچہ اخبار ناظم الہند لاہور میں اس کی تعریف اور لاف و گزاف سے لوگوں کا اسے نائب سلطان روم سمجھنا ۴۰۷

    اس کی مدح میں ایڈیٹر ناظم الہند اخبار کا افتراء ۴۰۷

    اس کی شکل دیکھتے ہی حضرت اقدس ؑ کا کہنا کہ یہ امین اور پاک باطن نہیں ہے ۴۰۷

    اشتہارات میں مذکور سلطنت روم اور حسین کامی کی نسبت حضرت اقدس کی پیشگوئیاں ۴۰۸ تا ۴۱۰

    اشتہارات کی پیشگوئیوں کا اول مقصود حسین بک کامی تھا ۴۱۰، ۴۱۱

    اخبار والوں کا پیشگوئی کے بعد حسین کامی کے حوالے سے حضرت اقدس پر اعتراضات کرنا ۴۱۱

    اس کی نسبت پیشگوئی کا پورا ہونا ۴۰۶

    حسین کامی کا ایک ہزار چھ سو روپیہ غبن کرنا اور وہ رقم اس سے اگلوائی جانا ۴۱۴

    ایک معزز ترک کا بتانا کہ حسین کامی کو مجرمانہ خیانت کی وجہ سے عہدہ سے موقوف کر دیا گیا اور املاک ضبط کر لی گئی ہیں ۴۱۲

    ہندوستان کے جملہ اخبارات میں حسین کامی کے غبن کی نسبت اشتہار کی درخواست ۴۱۴

    اخبار نیر آصفی کی شہادت ۴۱۲ تا ۴۱۴

    حسین خاں، بمبئی ۱۸۲

    حسین شبر کاظمی، سید ۵۹

    حسین علی، سید ۱۷۸

    حقیقت رام ۱۹۰

    حمیدالدین صاحب منشی ۱۸۲

    حنین بن اسحاق ۶۰

    حوا علیہا السلام ۴۸۰

    حیات خاں

    اس کی لڑکی سے باوا نانک نے شادی کی ۲۴۷

    حیدر بخش ۲۸۳

    خادم حسین خاں، حکیم ۱۸۷

    خادم حسین ،معلّم اسلامیہ ہائی سکول، راولپنڈی ۱۸۲

    خالد بن ولید رضی اللہ عنہ ۹۷،۹۸،۱۰۲،



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 671

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 671

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/671/mode/1up

    39

    افغانوں کے مطابق قیس نے ان کی لڑکی سے نکاح کیا اور اس سے تین لڑکے پیدا ہوئے ۹۶

    ان کا نبی کریمؐ پر ایمان لانا ۹۵

    خٹک ۱۰۱

    خٹکی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    خدابخش ،ضلع شاہ پور ۱۷۶،۱۸۸

    خدا بخش مرزا ۶۲،۲۶۳

    سید احمد خان کے ابتلاء کے وقت اسکی بری حالت کے گواہ ۴۷۲

    خدابخش، نقشہ نویس ملٹری ورکس راولپنڈی ۱۸۶

    خریسطفورہ جبارہ

    دمشق کے اس عیسائی کا اپنی کتاب میں حضرت اقدسؑ کا ذکر کرنا ۴۸۹ح

    خسرو پرویز،کسریٰ، شاہ ایران ۳۷۸

    اس کے دور میں عرب ایران کے تابع تھا ۳۷۶ح

    اس کا آنحضرت ؐ کے خط پر سیخ پا ہونا اور گرفتاری کا حکم دینا۳۷۶

    کسریٰ کے اشتعال کا باعث امر ۳۷۶ح

    اس کا آنحضرتؐ کی پیشگوئی کے مطابق قتل ہونا ۳۷۲،۳۷۷

    خضر ۴۲۳،۴۲۴ح

    خضر کے زندہ بجسم عنصری زمین پر ہونے کا عقیدہ ۵۷۸

    خضر کے قصہ کے قرآن میں ذکر کی وجہ ۴۲۳ح

    عظیم الشان لوگوں کو بعض دفعہ خضر کی طرح کے کام کرنے پڑتے ہیں ۴۲۰ح

    خلج ۱۰۰

    خلجی خلزئی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    خلیل الرحمٰن جمالی نمبردار ۱۷۷،۱۷۸

    خوشحال ۱۹۳

    خوگیان ۱۰۰

    خوگیانی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    د،ڈ،ر،ز

    داؤد علیہ السلام

    آپ پر لگائے جانے والے بہتان ۵۱۴

    داؤد الضریر الانطاکی ،شیخ ۵۸

    درانی (ایک افغان قبیلہ)

    یہ اسرائیلی فرقوں کی اولاد سے ہیں ۱۰۵

    دلبر، حکیم جھنگ مدرسہ ۱۸۸

    دنی چند، بدوملّی ۱۹۰

    دیانند سورستی، پنڈت

    آریوں کو انسانی پاکیزگی کے طور پر نیوگ سکھلایا ۲۳۵

    دیانند سورستی کی موت کی پیشگوئی ۱۵۳ ح ح ،۱۹۵

    ڈبلیو ہوئی ۷۳ح

    ڈیکسن، مسٹر ، ڈپٹی کمشنر ضلع گورداسپورہ

    حضور کا ٹیکس معاف کرنا اور مثل مقدمہ داخل دفترکرنا ۳۳۱

    راحولتا

    بدھ مذہب میں اس کا بدھ کے بیٹے اور جانشین کے طور پر ذکر ملتا ہے ۸۸

    رام بھجدت، لالہ

    مقدمہ اقدام قتل میں ہندوؤں کا وکیل



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 672

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 672

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/672/mode/1up

    40

    رجب علی مالک سفیر ہند

    اپنے کاتب پر نالش کی جس میں حضورؑ کو گواہ ٹھہرایا ۲۵۸

    رحمت اللہ صاحب تاجر شیخ ۳۱۰،۳۱۲

    رحیم بخش ، مدرس ۱۸۶

    رحیم بخش،مولوی ۳۳۱

    رشید احمد گنگوہی ۵۶۱

    رکن الدین ، حافظ نقشبندی قصوری ۱۸۲

    رکن الدین ، میرووال ضلع سیالکوٹ ۱۸۷

    رمضان علی قریشی، قاضی ۱۷۸

    روشن دین مسگر ۱۸۸

    زاز ۱۰۱

    زازی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    زکریا علیہ السلام ۳۴

    زلیخا

    حضرت یوسفؑ کے حوالے سے اس کے دو بیانات ۳۵۰ح

    زین الدین علی المہائمی

    خلت کے معنے موت کئے ۵۷۳

    زین الدین منشی محمدابراہیم انجینئربمبئی ۱۸۳

    س،ش

    سامری

    سامری کے گوسالہ کی اصل حقیقت ۳۹۹

    سامری کے گروہ کے مقابل پر حضرت موسیٰ کے گروہ کی ترقی ۴۰۰

    گوسالہ سامری اور سامری اور آریہ قوم میں آٹھ مشابہتیں

    ۳۹۸تا۵۵۴

    سامری کا اپنی دستکاری سے گوسالہ کو مقدس ظاہر کرنا ۳۹۹

    گوسالہ کو مقدس ثابت کرنے کے لئے سامری کا ایک جھوٹ۴۰۰

    گوسالہ بنانے کے بعد خدا کا بنی اسرائیل میں طاعون بھیجنا جس کا توریت خروج باب۳۲ آیت۳۵ میں ذکر ۴۰۱

    گوسالہ سامری کے کاٹے جانے کا دن شنبہ تھا ۳۹۸

    ستوریان(گرگشت کا بیٹا) ۱۰۰

    ستوریانی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    سجاول صاحب ساکن جگراؤں ضلع لودیانہ ۱۸۵

    سدارتھا ۷۲

    سرابان ۹۵،۹۶

    سرابند ۱۰۰

    سراج الحق ؓ ، صاحبزادہ ۳۵۲،۳۵۴

    سراج دین صاحب منشی ۱۸۱

    سعد اللہ لدھیانوی

    ہندوؤں میں سے نیا مسلمان،سخت جاہل، بے حیا اور کمینہ طبع ۲۱۲

    سعدی ؒ ، شیخ (مصلح الدین شیرازی) ۵۷۲

    سلطان روم ۲۱۲،۴۱۱

    سلطان محمدخاں ساکن بکڑالہ ضلع جہلم ۱۸۷

    سلطان محمد خوشحالہ علاقہ مانسہرہ ضلع ہزارہ ۱۸۷

    سلمنذر، شاہ

    اس کا بنی اسرائیل کو پکڑ کر ملک میدیا میں لے جانا ۶۹

    سلیم پاشا ۴۱۴



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 673

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 673

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/673/mode/1up

    41

    سلیمان علیہ السلام

    ایک بچہ کو آدھا آدھا کرنے کے فیصلہ والے قصہ کا بدھ مذہب میں بھی ذکر ملتا ہے ۹۰

    سمندخان ۱۷۶

    سور ۱۰۱

    سوری (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    سید احمد خان، کے سی ایس آئی ۴۶۸

    لیکھرام کے چھ سال کے عرصہ میں قتل ہونے کی پیشگوئی اور ان کا خود گواہ ہونا کہ اس عرصہ میں قتل کیا گیا ۳۹۶ح

    حضرت اقدسؑ کا انہیں مخاطب کر کے دعا میں ان کے شک پر اشعار لکھنا کہ لیکھرام کے بارے میں میری دعا کے منتظر رہیں۳۹۵

    دنیاوی عزت کی وجہ سے سید احمدخان نے اس سلسلہ کو ذرہ عظمت کی نظر سے نہ دیکھا ۴۶۷

    اپنے ایک خط میں حضرت اقدسؑ کی کتابوں کو لغو اور بے سود قرار دینا ۴۶۷

    حضرت اقدسؑ سے ایک مرتبہ اس کا ٹھٹھا کرنا ۴۶۷

    سید احمد خاں صاحب کے کئی قسم کی بلاؤں میں مبتلا ہو کر وفات پانے کی پیشگوئی ۴۶۴

    سخت ہم و غم پیش آنے والی پیشگوئی پر بعض احباب کا ناراض ہو کر ردّ چھپوانا ۴۷۱

    وہ ابتلاء جن میں سید صاحب مبتلا ہوئے ۴۶۵،۴۷۱

    اس کے بیٹے کی گواہی کہ اگر میں نقصان کے وقت علیگڈھ نہ ہوتا تو میرے والد صاحب اس دن غم سے مر جاتے ۴۷۲

    ایک ہندو کی شرارت سے مالی غم پیش آنا ۴۶۹

    سید احمد خاں کی وفات کے وقت حضرت اقدس علیہ السلام کا اس کی طرف ایک اشتہار روانہ فرمانا ۴۶۹

    شالمنذر

    ۷۲۱ ق م میں بنی اسرائیل کے دس فرقوں کو اسیر بنانا اور ان کا ہندوستان کے متفرق مقامات میں آباد ہونا ۱۷

    شاہ دین بابو،اسٹیشن ماسٹردینہ ۱۸۱

    شاہ نوازخاں نمبردارعمرال ضلع جہلم ۱۸۶

    شران ۱۰۰

    شرانی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    شرف الدین محلہ لوہاراں ۱۸۸

    شرمپت،لالہ

    ۱۵۳ح ح ، ۱۹۲ تا ۱۹۸،۲۰۰، ۲۲۸، ۲۲۹، ۲۵۷، ۲۷۳، ۳۰۹ح

    اس کا اپنے بھائی کے مقدمہ کے سلسلہ میں حضرت اقدسؑ سے دعا کی درخواست کرنااور پیشگوئی ۱۹۳

    آنحضرت ﷺ کی پیشگوئیوں کا منکر اور سخت معاند تھا ۱۹۳

    اس نے خواب دیکھا کہ آپؑ کو ۱۰۰۰ روپے آئے ہیں۔ حضرت اقدس ؑ نے فرمایا اس خواب کے ۱۹ حصے جھوٹ ہیں ۲۵۰، ۲۵۵

    جھنڈا سنگھ والے مقدمہ کا گواہ ۲۰۶

    خد اکی طرف سے قبل از وقت پیشگوئیوں کا گواہ ۲۰۰

    الیس اللہ بکاف عبدہ والی پیشگوئی کا گواہ ۱۹۸

    شریف احمدؓ مرزا(فرزند حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۲۰

    آپؓ کی ولادت کی پیشگوئی ۲۱۵

    شمس الدین ، بھیرہ ۱۸۹

    شمس الدین ، محلہ لوہاران ۱۸۸

    شمس الدین بن محمدابراہیم بمبئی چیچپو کلی ۱۸۳

    شمس الدین پٹواری ۲۹۵



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 674

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 674

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/674/mode/1up

    42

    الدین خان، ٹھیکہ داررئیس راولپنڈی ۱۸۶ شمس

    شنبیسی خاندان ۹۵

    شنترین(ستلیرنم) ۶۰

    شنگرف علی صاحب مدرس شیخوپورہ ۱۹۱

    شوگن چندر،سوامی

    اس کی کوشش سے جلسہ اعظم مذاہب کا انعقاد ۲۲۷

    شہاب الدین بمبئی چیچپو کلی ۱۸۳

    شہربانو (سادات کی فارسی الاصل دادی) ۲۷۴ ح

    شیثعلیہ السلام ۴۸۲،۴۸۳،۴۸۴

    شیر سنگھ، راجہ ۳۶۸

    شیرمحمدچپراسی ۱۷۷

    شیرویہ ۳۷۹

    اس کا اپنے باپ خسرو پرویز کو قتل کرنااور اس کی وجہ ۳۷۷

    ص،ض،ط،ظ

    صدرالدین ، بھیرہ ۱۸۹

    صدرالدین ، منشی پوسٹماسٹر ۱۷۷،۱۸۷

    ضامن علی، سید ۱۷۸

    ضیاء الحق ، ہاپوڑ ۱۸۲

    ضیاء الدین، قاضی کوٹی

    سخت ابتلاؤں میں ان کے مبتلا ہونے کی پیشگوئی ۴۷۲

    ان کی چٹھی جس میں ابتلاؤں کا حال لکھا ۴۷۲

    طالوت

    اس کے دو بیٹے برخیا اور ارمیاہ۔ برخیاہ کا بیٹا آصف اور ارمیاہ کا ارمغان ۱۰۱

    طور ۱۰۱

    طوری (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    ظفرالدین، میاں نقشبندی ۱۸۲

    ظہورالاسلام ، نقشہ نویس حال راولپنڈی ۱۸۶

    ظہیر الدین بابر (مغل بادشاہ) ۲۷۳

    ع

    عائشہ رضی اللہ عنہا، ام المؤمنین ۵۸۴

    عابدعلی سیّدحکیم ،دھرم کوٹ ۱۹۱

    عادل خاں، سجادہ نشین ۱۹۱

    عبدالباسط ابن عبدالرحمن ۱۸۳

    عبدالجبار ۵۳۴

    عبدالجبار غزنوی مولوی ۲۲۱،۲۲۴،۴۴۴

    عبدالحق ، ہیڈماسٹر ۱۷۹

    عبدالحق غزنوی ۵۴۰،۵۴۱،۵۴۲

    اس کا حضرت اقدسؑ کے خلاف اشتہار نکالنا ۵۳۴

    عبدالحق غزنوی نے گزشتہ نشانوں اور پیشگوئیوں کے متعلق دھوکہ دینا چاہا کہ گویا وہ پوری نہیں ہوئیں ۵۳۴

    اس کا اپنے اشتہار میں دو طرح کا حملہ کرنا

    ۱۔ گذشتہ پیشگوئیاں پوری نہیں ہوئیں ۵۳۴



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 675

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 675

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/675/mode/1up

    43

    ۲۔ حضرت مسیح موعودؑ نے بیماروں کی شفایابی کو بذریعہ دعا تمام ہندوستان اور پنجاب کے علماء کو دعوت دی تو عبدالحق نے اعتراض کیا کہ کس طرح جمع ہوں اور ان کے اخراجات کون ادا کرے گا ۵۳۸

    اس کا حضرت اقدسؑ سے نشان مانگنا کہ فلاں صحابی کی ٹانگ کمزور ہے درست ہو جائے ۵۳۹

    اس کا ہنسی ٹھٹھے میں مراسیوں کا طریق اختیار کرنا ۵۵۸

    عبدالحق سے مباہلہ کا دن ہی حضورؑ کے اقبال اور عبدالحق کے اِدبار کا زمانہ ہے ۵۴۶

    مباہلہ کا حضورؑ پر اور عبدالحق پر اثر ۵۵۵

    اس کے متعلق پیشگوئی کہ جب تک چوتھا لڑکا پیدا نہ ہو لے تب تک یہ نہیں مرے گا ۱۴۶،۱۵۱، ۵۴۹، ۲۲۱، ۴۴۴،۵۱۱

    حضرت اقدسؑ کے خلاف اس کے اعتراضات اور ان کے جوابات

    اس اعتراض کا جواب کہ متفرق مباحثات میں لاجواب رہے۵۴۱

    اس اعتراض کا جواب کہ رسوا اور ذلیل ہو کر علماء کے قابل نہیں رہے ۵۴۵

    اس اعتراض کا جواب کہ کیا آتھم اور داماد احمد بیگ اور فرزند موعود کا کوئی نتیجہ ظہور میں آیا ۵۴۹

    اس اعتراض کا جواب کہ اس فضول کام کے لئے کسی نے نہیں آنا مفت کی شیخی مشہور ہو جائے گی ۵۵۶

    اس اعتراض کا جواب کہ انہیں قیامت، حساب، جنت دوزخ وغیرہ پر ایمان نہیں ۵۶۱

    اس اعتراض کا جواب کہ مرزا کی کتابیں جھوٹ اور افتراؤں سے بھری ہوئی ہیں ۵۶۶

    حضرت اقدسؑ پر تین صریح جھوٹ ثابت کرنے کا جواب ۵۶۷

    عبدالحمید ۳۴۲،۳۵۰

    اس کے بیان پر حضرت مسیح موعود پر مقدمہ قتل درج ہوا ۲۳۲

    اس کا بیان کہ مجھے یہ پادری مارٹن کلارک نے سکھایا تھا ۳۴۹

    عبدالحی (فرزند حضرت حکیم مولوی نور الدینؓ)

    حضرت مسیح موعود ؑ کے نشان کے طور پر پیدا ہوئے ۲۱۲

    عبدالحی، بی اے کلاس مشن کالج لاہور ۱۸۴

    عبدالرحمن مدراسی سیٹھ ۳۱۰

    ان کی مالی قربانی کا ذکر ۲۷۰

    ان کے بارے میں ایک الہامی شعر ۲۱۲

    حافظ عبدالرحمن ہندی امرتسری

    اخبار نیر ہند میں حسین کامی کی خیانت کی چٹھی کی اشاعت۴۱۳،۴۱۴

    عبدالرحمن شاہ قادری ، سیّد،حاجی ،ڈاکٹر ۱۸۲

    عبدالرحمن صاحب پہواڑا ۱۸۸

    عبدالرحیم ۴۷۳

    عبدالرحیم شیخ ۲۹۱،۲۹۳

    عبدالرشید،حافظ ۱۸۳

    عبدالرؤف ،بھیرہ ۱۸۹

    عبدالسبحان خاں، جہلمی ۱۸۸

    عبدالسلام رفیقی ۱۸۱

    عبدالعزیز ،ترکش قونصل مدراس ۴۱۳

    عبدالعزیز، میرووال



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 676

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 676

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/676/mode/1up

    44

    عبدالغفور، بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۸۸

    عبدالغفور، قریشی ۱۸۳

    عبدالغفور خاں، خواجہ ۱۷۸

    عبدالغنی، داتہ سیالکوٹ ۱۸۸

    عبدالغنی جعفری ۱۷۸

    عبدالفتاح نغری، سید ۱۷۸

    عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمۃ

    آپ کی طرف منسوب بعض کرامات ۳۳۶،۳۳۷

    عبدالقیوم ملا (اول تعلقہ دار لنگسگور) ۴۱۳

    عبدالکریم، مولوی، رضی اللہ عنہ

    ۲۹۶،۳۱۰،۳۳۲،۳۴۳،۵۵۷

    عبدالحق غزنوی کاآپ کی ٹانگ درست کرنے کا نشان مانگا ۵۴۱

    عبدالکریم ، ساکن خوشحالہ ۱۸۸

    عبدالکریم ، بھیرہ ۱۸۹

    عبداللہ (والد گرامی آنحضرت ﷺ) ۴۷۷ح

    عبداللہ آتھم، ڈپٹی

    ۲۵۰تا۲۵۲،۲۵۳، ۳۱۰، ۳۵۶، ۳۵۸، ۳۶۲، ۳۶۴، ۳۶۵

    ۳۶۸، ۳۶۹، ۵۵۰، ۵۵۱، ۵۵۲، ۵۵۳، ۵۵۴

    حضرت مسیح موعود ؑ سے مباحثہ اور پیشگوئی کے مطابق مہلت ۲۴۹

    عبداللہ آتھم کے متعلق پیشگوئی اور اس کا پورا ہونا ۳۵۴تا۳۷۱

    اس کی موت کی نسبت پیشگوئی میں شرط اور مخالفین کا شور مچانا کہ پیشگوئی پوری نہیں ہوئی ۱۴۸

    آتھم والی پیشگوئی کی حقیقت ۳۰۷

    لیکھرام اور آتھم کی پیشگوئی کا تقابل ۳۵۵تا۳۶۸

    لیکھرام اور آتھم کے نشان اور شاہ ایران خسرو پرویز اور قیصر روم کے نشانات میں مشابہت ۳۷۲۔۳۷۹

    آتھم کا آخری اشتہار کے چھ ماہ بعد فوت ہو جانا ۱۵۰

    آتھم کی پیشگوئی شرطی تھی ۳۰۷،۳۶۲

    آتھم کی پیشگوئی جمالی ہے ۱۵۰

    پیشگوئی کے مطابق مر کر حضرت اقدس ؑ کی صداقت پر مہر کر گیا ۵۴۷

    آتھم کا اپنے بچنے اور مرنے سے دوہرے طور پر پیشگوئی کی شہادت کو ثابت کرنا ۱۵۰

    آتھم کی پیشگوئی کے پورا ہونے کا ثبوت ۱۵۴

    آتھم پر پیشگوئی کی عظمت کا اثر ۳۵۸

    احمد بیگ کے داماد اور آتھم کی پیشگوئی کے بارے میں اعتراض کا جواب ۵۴۹،۵۵۰

    اعتراض کہ پیشگوئی آتھم پوری نہیں ہوئی ۵۳۴

    آتھم اور اخبار چودھوی صدی والے بزرگ کے رجوع میں فرق۳۰۷

    آتھم کا الزام کہ اس پر تین حملے کئے گئے اس لئے ڈرتا رہا نہ کہ پیشگوئی سے ۲۵۱

    حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا اگر آتھم قسم کھا کر کہہ دے کہ وہ پیشگوئی سے نہیں ڈرا بلکہ حملوں سے ڈرا۔ میں اس کو چار ہزار روپے دوں گا۔ مگر اس نے قسم نہ کھائی ۱۴۹،۲۵۳

    آتھم کو قسم کے لئے بلانا اور اس کا جھوٹے بہانے بنانا

    ۱۴۹،۳۶۲،۴۲۳

    کئی دفعہ عدالت میں حاضر ہو کر قسم کھانے کا ثبوت ۱۴۹ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 677

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 677

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/677/mode/1up

    45

    عبداللہ آتھم کے ساتھ مباحثہ کا ذکر ۳۵۷

    آتھم پر مباہلے کے اثرات ۵۵۱

    ڈپٹی آتھم نے پیشگوئی سننے کے بعد خوف اور ہراس کے آثار ظاہر کئے ۵۳۵

    آتھم اگر کامل رجوع کرتا تو خدا بھی کامل طور پر اسے تاخیر دیتا ۱۴۹

    آتھم کے رجوع نہ کرنے کا ثبوت اگر مخالفین دیں تو ہم ماننے کو تیار ۱۴۹

    کئی دفعہ عدالت میں حاضر ہو کر قسم کھانے کا ثبوت ۱۴۹ح

    آتھم کو اگر میرے کسی مجرمانہ حملہ کا خوف تھا تو عدالت میں نالش کرتا مگر اس کا ایسا نہ کرنا ۱۵۰

    آتھم کا رجوع ۳۵۷تا۳۶۲

    عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما ۵۶،۵۷۹

    عبداللہ خان

    افغانوں کے بنی اسرائیلی ہونے کے بارے میں اس کی رائے۹۹

    عبداللہ خان (ڈیرہ اسماعیل خاں) ۲۲۹

    ان کی طرف سے روپیہ آنے کی پیشگوئی ۲۶۹

    عبداللہ سنوری ،میاں ۲۹۰

    سرخ چھینٹوں والے کشفی واقعہ کے گواہ ۱۹۷،۱۹۸

    حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو ان کے ایک کام کے نہ ہونے کی نسبت الہاماً بتایا جانا ۲۸۹

    عبداللہ سورتی،حافظ ۱۸۳

    عبداللہ شاہ، واعظ بدوملّی ۱۹۰

    عبداللہ غزنوی ۵۵۸

    عبداللہ غزنوی کی خواب کہ ایک نور آسمان سے اترا ہے اور وہ مرزا غلام احمد قادیانی ہے اور اس سے میری اولاد محروم رہے گی ۵۴۶

    ان کی وفات کے بعد خواب میں حضرت اقدسؑ کا انہیں دیکھنا اور ان کا خواب کی تعبیر بتانا ۳۵۳

    عبداللہ غزنوی کے استاد (میاں صاحب کوٹھے والے) نے حضور کے مہدی ہونے کی تصدیق کی ۵۶۴

    عبداللہ غزنوی کا الہام حضورکے حق میں انت مولانا فانصرنا علی القوم الکافرین ۵۶۶ ح

    عبداللہ غزنوی اچھا آدمی تھا خدا اس پر رحمت کرے ۵۶۶ح

    حضرت مسیح موعودؑ کا ان کو خواب میں دیکھنا ۳۵۱

    عبدالمجید عثمانی، قاضی ۱۷۸

    عبدالمطلب(آنحضرت ﷺ کے دادا) ۴۷۷ح

    عبدالواحدخاں صاحب صدربازار کمپ انبالہ ۱۸۷

    عبدالوہاب صاحب ملک بن فقیراحمد ۱۸۴

    عبدالوہاب خاں صاحب محمدیہ بن عبداللہ ۱۸۴

    عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ ۱۷۸

    عزرا نبی

    جوزی فس کا عزرا نبی کے ساتھ شہر میں جانے والے یہودیوں کا دریائے فرات کے اس پار رہنے کا ذکر کرنا ۹۷

    عزیزالدین ولدغلام محی الدین ۱۸۶

    عطاء محمد بٹالہ ضلع گورداسپور ۱۸۵

    عطاء محمد جھنگ صدر مدرسہ ۱۸۸

    عظیم اللہ، حافظ ۱۷۸

    علاء الدین حکیم ضلع شاہ پورتحصیل بھیرہ ۱۷۳

    علم دین، میاں



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 678

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 678

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/678/mode/1up

    46

    علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ

    حضرت ابوبکرؓ کی بیعت سے کچھ دن توقف کیا ۵۷۸

    خوارج کا حضرت علیؓ پر الزامات لگانا ۴۲۲ح

    آپ کی طرف منسوب بعض کرامات کا ذکر ۳۳۷

    علی ، سیّد، میرووال ۱۸۹

    علی احمد کلانوری گرداورقانون گو ۱۸۰

    علی اکبر میرووال ضلع سیالکوٹ ۱۸۹

    علی محمد بی اے کلاس مشن کالج لاہور ۱۸۴

    علی محمد، پٹواری، بدوملّی ۱۸۹

    علیم اللہ، شیخ، میرووال ۱۸۹

    علی گوہر نمبردارگھٹیالیاں ۱۹۱

    عماد الدین، پادری

    اس کی گندی تحریروں سے مسلمانوں کا اشتعال میں آنا ۴۹۱

    عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ ۳۶۴،۵۴۲،۵۸۴،۵۸۵

    آنحضرتؐ کی وفات پر آپؓ کا رد عمل۵۷۹،۵۸۰،۵۸۱ تا۵۸۲ح

    صلح حدیبیہ میں انہیں خدا نے ابتلاء سے بچایا ۵۵۵

    عمرالدین درویش، بدوملّی ۱۹۱

    عنایت اللہ ، بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۸۸،۱۸۹

    عیسیٰ علیہ السلام دیکھئے ’’مسیح ابن مریم‘‘

    عیسیٰ خیل(ایک افغانی قبیلہ)

    ان کے مسیح کی اولاد ہونے کے امکان کا دعویٰ ۷۰

    عینی، شارح بخاری ۴۵۸ح

    غ

    غلام احمد قادیانی علیہ السلام ، حضرت مرزا

    خاندان اور ذاتی حالات

    مسیح موعودکے گاؤں کا نام اسلام پور قاضی ماجھی رکھا جانے میں حکمت ۱۱۹

    آپ کا خاندان بنی فارس اور بنی فاطمہ سے مرکب ہے ۲۷۶

    اس عاجز کے خون کی بنی فاطمہ کے خون سے آمیزش ہے ۲۰۲

    خاندان کا تعارف اور آباء و اجداد کی میراث کا ذکر ۲۷۳ ح، ۲۷۴ ح

    اپنے خاندانی حالات اور گورنمنٹ کے احسانات کا تذکرہ ۱۱۲تا۱۱۴

    آپ کے خاندان کو مرزا کا خطاب دیئے جانے کی وجہ ۲۷۴ح

    اپنے اعلیٰ خاندان کا تعارف ۲۸۷

    آپ کے عالی نسب ہونے کی نسبت الہامات ۲۸۵

    سکھوں کے عہد میں خاندان پر مظالم ۱۱۳

    والد کے انتقال کے بعد یہ عاجز دنیا کے شغلوں سے علیحدہ ہو کر خداتعالیٰ کی طرف مشغول ہوا ۱۱۴

    والد محترم کی وفا ت پر اللہ تعالیٰ کا آپؑ کو سایہ عاطفت میں لینا اور متکفل ہونا ۱۱۹

    حضورؑ نے ایک ہندو کو نوکر رکھا جس سے فارسی اور ناگری کے الہام لکھائے جاتے تھے ۲۶۰

    حضور کی گرفتاری کے لئے امرتسر کے مجسٹریٹ کا وارنٹ جاری کرنا ۳۴۴

    آپ پر مقدمہ اقدام قتل ۳۴۳

    آپ کے خلاف وارنٹ گرفتاری جاری ہونا لیکن اس کا گوداسپور نہ پہنچنا اور پھر وارنٹ کینسل ہونا ۳۴۴ تا



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 679

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 679

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/679/mode/1up

    47

    مقدمہ ٹیکس میں بریت ۳۳۱

    آپ کا خاندان انگریزوں کا قدیم سے خیر خواہ ہے ۴۸۷

    دوسری شادی کے وقت آپ کو لاحق امراض ۳۰۳

    شدید بیماری میں الہامی دعا اور دریا کے ریت ملے پانی سے شفا پانا۲۰۹

    بھائی کی بیماری پر دعا کرنے کے تین مقاصد ۲۱۱

    الہام الیس اللّٰہ کی بنوائی گئی مہر کا نقش ۱۹۸

    آپؐ کے متعلق پیشگوئیاں اور نشانات

    گذشتہ اکابر کی پیشگوئیوں کے مطابق آپ کا توام پیدا ہونا۴۷۸

    عبداللہ غزنوی کا خواب کہ ایک نور آسمان سے اترا ہے اور وہ مرزا غلام احمد قادیانی ہے ۵۴۶

    حضور کی دعوت کے وقت میں آسمان پر رمضان میں خسوف کسوف عین حدیث کے موافق وقوع میں آیا ۵۴۳

    احمد نام میں مخفی پیشگوئی ۵۲۷

    مسیح موعود کے زمانہ کی علامات کا پورا ہونا ۱۱۶

    بعثت کا مقصد

    خدا کے پاک الہام سے لوگوں کی اصلاح کے لئے کھڑاہونا ۴۹۲

    آپ کی بعثت کا مقصد ۱۳،۲۶۶

    میں اس لئے آیا ہوں کہ موجودہ دنیا کے حظ سے بھی کچھ کم کر کے خداتعالیٰ کی طرف کھینچوں ۱۵۹

    خدا نے مجھے اس لئے دنیا میں بھیجا تا میں حلم اور خلق اور نرمی سے خد اکے گم گشتہ لوگوں کو خدا اور اس کی پاک ہدایتوں کی طرف کھینچوں ۱۴۳

    خدا نے آسمان سے مجھے بھیجا تا اس مرد خدا کے رنگ میں ہو کر جو بیت اللحم میں پیدا ہوا اور ناصرہ میں پرورش پائی قیصرہ کے نیک مقاصد کی اعانت میں مشغول ہوں ۱۱۶

    میں تلوار چلانے نہیں آیا بلکہ تمام تلواروں کو میان میں کرنے کے لئے بھیجا گیا ہوں ۸۷

    اپنے اس مسیح کو بھیجا تا دلائل کے حربہ سے اس صلیب کو توڑے جس نے حضرت عیسیٰ ؑ کے بدن کو توڑا تھا ۱۴۳

    خدا نے مجھے بھیجا ہے تا پرہیزگاری، پاک اخلاق اور صلحکاری کی راہوں کو دوبارہ دنیا میں قائم کروں ۱۲۰

    دعاوی

    اے لوگو جو زمین پر رہتے ہو میں پورے زور کے ساتھ آپ کو دعوت دیتا ہوں کہ سچا مذہب صرف اسلام اور سچا خدا وہی ہے جو قرآن نے بیان کیا ہے ۱۴۱

    خدا نے مجھے آسمانی نشانوں کے ساتھ بھیجا اور کوئی نہیں جو ان میں میرا مقابلہ کر سکے ۱۶۷

    ابتداء سے میرا مذہب ہے کہ میرے دعویٰ کے انکار سے کوئی کافر یا دجال نہیں ہو سکتا ۴۳۲

    خدا کا خود کہنا کہ تُو ہی مسیح موعود ہے ۴۸۵

    خدا کا احسان کہ اس نے گمراہوں کو راہِ راست پر لانے کے لئے مجھے چنا ۱۴۳

    خدا کی روح میرے اندر بولتی ہے ۴۹۹

    میں وہی دکھلا سکتا ہوں جو خدا نے کہا نہ کچھ اور ۵۴۰

    اب کسی کاسر صلیب اور مسیح موعود کی انتظار کرنا عبث اور طلب محال ہے ۲۴۵

    خدا نے مجھے حکم دیا ہے کہ نرمی اور آہستگی اور حلم اور غربت کے ساتھ خدا کی طرف توجہ دلاؤں ۱۳

    اس تاریکی کے زمانہ کا نور میں ہی ہوں جو شخص میری پیروی کرتا ہے وہ ان گروہوں اور خندقوں سے بچایا جائے گا جو شیطان نے تاریکی میں چلنے والوں کے لئے تیار کئے ہیں ۱۳



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 680

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 680

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/680/mode/1up

    48

    میں زور سے اور دعوے سے کہتا ہوں کہ جس کسر صلیب کا بخاری میں وعدہ تھا اس کا پورا سامان مجھے دیا گیا ہے ۱۶۸

    مسیح موعود کا کام ہے کہ دلائل واضح سے عیسائی مذہب کو گرا دے نہ کہ تلواروں اور بندوقوں سے لوگوں کو قتل کرتا پھرے

    جن حقائق کے کھلنے سے عیسائیت کو شکست آئی تھی وہ حقائق بفضلہ تعالیٰ میرے ہاتھ پر کھل گئے ۲۴۵

    وہ مجدد جو اس چودھویں صدی کے سر پر بموجب حدیث آنا چاہیے تھا وہ یہی راقم ہے ۱۶۵

    اگر کوئی کسی اخبار میں شائع کردے کہ نشان دیکھنے سے وہ مسلمان ہو جائے گا تو ایک سال سے پہلے وہ نشان دیکھ لے گا ۱۴۰

    مشرق اور مغرب کی روحوں کو اسلام کی دعوت ۱۴۱

    اکثر اللہ تعالیٰ مجھے بتلا دیتا ہے کہ وہ کس قسم کا انعام کرنا چاہتا ہے کل تو یہ کھائے گا، یہ پیئے گا، یہ تجھے دیا جائے گا ویسا ہی ظہور میں آجاتا ہے ۲۰۰

    صداقت حضرت اقدسؑ

    مخالفین کے لئے بطور حجت آپ کو قبل از بعثت پاک زندگی عطا کیا جانا ۲۸۳،۲۸۵

    مسیح موعود کے زمانہ کی علامات کا پورا ہونا ۱۱۶

    میری سچائی کے لئے یہ کافی حجت ہے کہ میرے مقابل پر کسی قدم کو قرار نہیں اب جس طرح چاہو اپنی تسلی کر لو ۲۴۹

    مامورین کی تمام علامتیں آپ میں پوری ہوئیں ۱۳۷

    نبی کریمؐ کی روحانی زندگی کے باعث تین ہزار نشانات کا ظہور ۱۴۰

    آپ کی آمد سے دماغوں میں روشنی، دلوں میں توجہ اور قلموں میں زور اور کمروں میں ہمت کا پیدا ہونا ۶۴

    صلیب کے مشابہ وقت کا آپ پر آنا مگر خدا کا بچانا ۵۲۱ح

    چالیس برس کا ہونے پر الہام و کلام سے مشرف کیا جانا ۲۸۳

    بذریعہ الہام آپ کو صدی کا مجدد اور صلیبی فتنوں کا چارہ گر ہونا ظاہر کیا گیا ۲۸۳

    اللہ تعالیٰ کا آپ کی تائید و تصدیق کے لئے کئی طرح کے نشانات نازل کرنا ۴۰۵

    فقراء اور مشائخ اور صوفیوں کو ایک سال کے اندر اندر نشان نمائی کی دعوت ۱۷۰

    حضرت اقدسؑ اور مخالفین

    آپ کے مخالفین کا صدہانشانوں کو دیکھ کربھی فائدہ نہ اٹھانا ۱۴۷

    آپ کی بعض مشروط پیشگوئیوں پر مخالفین کا اعتراض کرنا ۱۴۸

    حضرت عیسیٰ کے مع جسم آسمان پر جانے یا مع جسم آسمان سے آنے کے حوالہ سے مولویوں کو مقابلہ کی دعوت ۵۴۳

    مسلمانوں کا آپ کو انواع و اقسام کی ایذا دینا ۱۵۵

    مولویوں کا آپ کی بھرپور مخالفت کرنا ۴۹۲

    مولویوں کا اعتراض کہ یہ شخص انگریزی سلطنت کی حد سے زیادہ تعریف کر تا ہے ۱۵۵

    عبدالحق غزنوی کے اعتراضات اور ان کے جوابات ۵۳۴

    دعویٰ مسیح موعود اور مہدی معہود کے بعد تمام لوگوں کا میری تباہی اور قتل کے منصوبے بنانا ۴۵۲

    سید احمد کا اپنے ایک خط میں حضرت اقدسؑ کی کتابوں کو لغو اور بے سود قرار دینا ۴۶۷

    حضرت اقدسؑ سے ایک مرتبہ سید احمد کا ٹھٹھا کرنا ۴۶۷

    قبولیت دعا کے حوالے سے سید احمد خاں کو ۴۰ روز اپنے پاس رہنے کی دعوت ۴۷۰

    بٹالوی کا اعتراض کرنا کہ جس مقدمہ کا فیصلہ ۲۴ فروری ۱۸۹۹ء کو ہوا حضرت اقدس اس میں بری نہیں بلکہ ڈسچارج ہوئے تھے۔ اس کا جواب



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 681

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 681

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/681/mode/1up

    49

    بٹالوی کا گورنمنٹ کو یہ خبر دینا کہ حضرت اقدس ؑ اس کی کی نسبت اچھے خیالات نہیں رکھتا ۴۵۴

    مخالفین کو ضال اور جادۂ صدق سے دور سمجھنا ۴۳۲

    میں کسی مسلمان کو کافر نہیں جانتا ۴۳۴

    میرا اور ڈپٹی عبداللہ آتھم کا مقابلہ کسی میرے دعوے کے متعلق نہ تھا بلکہ آتھم کہتا تھا کہ قرآن خدا کا کلام نہیں اور میں کہتا تھا کہ عیسائی اپنی اصلیت پر نہیں ۵۵۰

    عبدالحق سے مباہلہ سے پہلے میری عزت ایک قطرہ کے موافق تھی اور اب مباہلہ کے بعد ایک دریا کی مانند ہے ۵۴۸

    مباہلہ کے بعد حضور ؑ کو ملنے والی فتوحات اور عبدالحق کو ملنے والی ذلتوں کا ذکر ۵۴۹

    مباہلہ کے بعد تیس ہزار روپیہ مجھے بھیجا گیا مگر عبدالحق کو دو روپے کا منی آرڈر بھی نہیں آیا ۵۴۷

    مباہلہ کے بعد نصرت کا نشان ۵۴۸

    مسلمانوں کو دعوت کہ جلسہ کر کے عام اعتراض کریں کہ فلاں پیشگوئی جھوٹی نکلی اور حاضرین بھی قسم کھائیں کہ جھوٹی نکلی تو میں توبہ کروں گا ورنہ توبہ ہو کر اس جماعت میں شامل ہو جاؤں گا۱۵۵

    اپنی تصدیق کے لئے لالہ شرمپت سے اولاد کی قسم دے کر پوچھنے کا کہنا ۱۵۳ح ح

    گورنمنٹ کی زیرنگرانی مخالفین کو نشان نمائی کی دعوت ۴۹۴

    مسلمانوں میں سے فقراء اور مشائخ اور صوفیوں کو ایک سال کے اندر اندر نشان نمائی کی دعوت ۱۷۰

    مولویوں کا آپ کو کافر ٹھہرانا اور اس کی دو وجوہات ۱۳

    اپنے اور مخالفین کے درمیان فیصلے کی دعا ۱۷۱

    آپ کے مقابل پر علماء کا عاجز آجانا ۳۳۹،۳۴۰

    پادریوں کو دعوت مقابلہ دینا کہ حضرت مسیح اور حضرت محمدؐ میں سے روحانی برکات اور افاضات کی رو سے کون زندہ ہے ۱۶۰

    عیسائیوں کا ایک عیب دور کرنے کے لئے خدا کا حضرت اقدس کی مدد کرنا ۱۲۳

    عیسائی مؤلفین کے خلاف سخت زبان استعمال کرنے کی وجہ۴۹۰

    ڈاکٹر مارٹن کلارک کا اقدامِ قتل کا مقدمہ دائر کرنا ۳۲

    حضرت اقدسؑ اور دیگر انبیاء

    الہام میں آپ کا نام آدم رکھا جانا ۲۸۸

    حضرت آدم ؑ کی خُو اور طبیعت پر آنا ۴۷۷

    حضرت آدم ؑ کے ساتھ مشابہتیں ۴۷۹

    بعض مشابہتوں کی وجہ سے آپ کا نام ابراہیم رکھا جانا۲۸۵ح

    لیکھرام کی پیشگوئی کے حوالے سے حضرت اقدس علیہ السلام کی حضرت موسیٰ سے مشابہت ۴۰۱

    آپ کا نام عیسیٰ رکھا جانا ۲۸۳،۲۸۴

    آپ کے عیسیٰ کہلانے کی وجہ ۱۱۷

    حضرت عیسیٰ پر آپ کی جزوی فضیلت جو غیر نبی کو نبی پر ہو سکتی ہے۴۸۱

    براہین احمدیہ میں یہ لکھنا کہ خود عیسیٰ دوبارہ آئے گا مگر خدا کا متواتر وحی سے اسے فاسد عقیدہ قرار دینا ۴۸۵

    مسیح ناصری کے نام پر آنا تاکہ صلیبی عقائد کی غلطی کو ظاہر کردے۸۶

    حضرت عیسیٰ کے مع جسم آسمان پر جانے یا مع جسم آسمان سے آنے کے حوالہ سے مولویوں کو مقابلہ کی دعوت ۵۴۳

    بڑا بھاری معجزہ مسیح کی وفات کا ثبوت اور اس کا پتہ دینا ۱۴۵

    مسیح محمدی اور مسیح اسرائیلی میں مشابہت ۵۲۴

    حضرت مسیح کے حق میں کوئی بے ادبی کا کلمہ میرے منہ سے نہیں نکلا۳۰۵ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 682

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 682

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/682/mode/1up

    50

    حضرت اقدسؑ اور انگریزی گورنمنٹ

    نیز دیکھئے مضامین میں ’’انگریزی حکومت اور اسماء میں ’’وکٹوریہ‘‘

    گورنمنٹ انگریزی کے احسانات کا ذکر ۴۵۶

    محسنہ گورنمنٹ سے خیرخواہی اور ہمدردی ۴۸۸

    تین باتوں کی وجہ سے گورنمنٹ کے خیرخواہ ۴۹۱

    خدا نے ہمارے لئے اس گورنمنٹ کو ایک پناہ بنا دیا ہے ۴۵۸

    قیصرہ کے دل میں خدا کا الہام کہ وہ میری سچی محبت کو شناخت کر لے جو میرے دل میں اس کے لئے ہے ۱۱۵

    قیصرہ کے لئے دعا کرنا ۵۰۰

    حضرت اقدسؑ کی قیصرہ کے لئے دعا کہ اللہ تعالیٰ قیصرہ کو ہماری طرف سے جزا دے ۱۲۵

    اپنے تمام عزیزوں کے ساتھ دونوں ہاتھ اٹھا کر دعا کرنا کہ قیصرہ تادیر سلامت رہے ۱۱۴

    میرا کانشنس ہرگز قبول نہیں کرتا کہ رسالہ تحفہ قیصریہ ملکہ معظمہ کے حضور پیش ہوا ہو اور پھر میں جواب سے ممنون نہ کیا جاؤں ۱۱۲

    قیصرہ کی عمر میں برکت اور اقبال و جاہ و جلال میں ترقی کی دعا ۱۱۱

    قیصرہ اور اس کے معزز افسروں کے لئے اخلاص، محبت اور جوش اطاعت ۱۱۲

    قیصرہ کا پیدا ہونا حق اور باطل کی تفریق کے لئے دنیا پر ایک آخری حکم ہے ۱۱۹

    ہماری دن رات کی دعائیں آپ کے لئے آب رواں کی طرح جاری ہیں ۱۲۰

    بٹالوی کا گورنمنٹ کو یہ خبر دینا کہ حضرت اقدس ؑ اس کی کی نسبت اچھے خیالات نہیں رکھتا ۴۵۴

    گورنمنٹ کی زیرنگرانی مخالفین کو نشان نمائی کی دعوت ۴۹۴

    آپ کی تحریرات

    ہندوؤں کے مقابل میں نے کتاب براہین احمدیہ اور سرمہ چشم آریہ اور آریہ دھرم ایسی کتابیں تالیف کیں ۲۳۲

    آپؑ کی اپنی تالیفات میں وہ روشن دلائل ہیں جن سے نہ عیسائی مذہب باقی رہ سکتا ہے اور نہ کفارہ۔ یہ فتح عظیم ہے جو حدیث یکسر الصلیب کو پورا کرتی ہے ۲۴۵

    ممانعت جہاد اور انگریزی اطاعت کے بارے میں بکثرت

    کتب و اشتہارات کی اشاعت ۱۵۵

    عیسائی مؤلفین کے خلاف سخت زبان استعمال کرنے کی وجہ۴۹۰

    جس شخص نے میرے رسائل عربیہ پڑھے ہوں گے وہ اس بات کو بخوبی سمجھ لے گا کہ ان کتابوں میں کس زور شور سے بلاغت فصاحت کے لوازم کو نظم و نثر میں بجا لایا گیا ہے ۳۳۱

    خدا کے حضور کتاب مسیح ہندوستان کے سلسلہ میں دعا ۱۵

    متفرق

    سلسلہ کے لئے مالیفتوحات ۵۴۷

    اپنے بعض الہامات کے متعلق اجتہاد سے کام لینا ۵۰۳

    مختلف مذاہب میں سے سچے مذہب کے پرکھنے کی تجویز ۴۹۴

    جماعت کو صبر کی تلقین ۵۱۳

    جہاد کے نظریہ کو ختم کرنے کے لئے مساعی اور ان کا اثر ۱۱۴،۱۲۰

    پیشگوئیاں اور نشانات دیکھئے مضامین میں ’’پیشگوئی‘‘

    **

    غلام احمدصاحب متعلم بی۔اے ۱۸۴

    غلام اکبرصاحب سارجنٹ درجہ اول ۱۸۵

    غلام الٰہی صاحب بھیرہ ۱۸۹

    غلام حسن صاحب بی اے ۱۸۴



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 683

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 683

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/683/mode/1up

    51

    غلام حسین صاحب سٹیشن ماسٹر ۱۸۰

    غلام حسین صاحب کاتب ۱۸۱

    غلام حیدرصاحب موضع جکرجہلم ۱۸۷

    غلام حیدرصاحب ممبرکمیٹی۔بدوملّی ۱۹۰

    غلام رسول صاحب اسٹامپ فروش۔بدوملّی ۱۹۱

    غلام رسول صاحب بھیرہ ۱۸۹

    غلام رسول صاحب، دوناچک ۱۸۹

    غلام علی صاحب ، مولوی ۱۹۰

    غلام قادرصاحب سیّدسجادہ نشین بدوملّی ۱۹۰

    غلام قادرصاحب نمبردار ۱۹۱

    غلام قادر مرزا (برادر اکبر حضرت مسیح موعودؑ )

    آپ کا مسیح موعود ؑ کو نواب سردار محمد حیات خان کے لئے دعا کرنے کی سفارش کرنا ۱۹۲

    مرزا غلام قادر مرحوم کے خلاف جدی شرکاء نے ملکیت قادیان کے مقدمے کرائے جس میں ان کو بالآخر کامیابی ہوئی ۲۱۹

    بیماری سے مشت استخوان ہو جانے کے بعد شفا پا کر ۱۵ برس زندہ رہے ۲۱۰

    آپ کے بارے میں حضرت مسیح موعود ؑ کو خواب کہ اب قطعی طور پر ان کی زندگی کا پیالہ پُر ہو چکا ۲۱۱

    غلام قادرصاحب دوکاندارجہلم ۱۸۷

    غلام محمد ۱۸۳

    غلام محمدصاحب ضلع دارنہرشاہ پور ۱۷۵

    غلام محمدصاحب بھیرہ محلہ لوہاراں ۱۸۸

    غلام محمدصاحب نمبردار۔پھاگیاں۔رعیہ ۱۹۱

    غلام محی الدین صاحب ہیڈماسٹر ۱۸۶

    غلام محی الدین صاحب بی اے ۱۸۴

    غلام مرتضیٰ مرزا (والد محترم حضرت مسیح موعود ؑ ) ۳۴۶

    سکھوں کے عہد میں بڑے صدمات اکیلے برداشت کئے ۱۱۳

    آپ نے ہزارہا روپیہ ان دیہات پر خرچ کیا جو آپ کے قبضہ سے نکل چکے تھے ۲۱۰

    محسن گورنمنٹ کے مشہور خیرخواہ ۴۸۸

    انگریزی حکومت کے لئے ایام غدر میں پچاس گھوڑ سوار دینا۱۱۳

    آپ کی وفات کے موقع پر مسیح موعودؑ کو ہونے والے الہامات ۱۹۸

    غلام مصطفی صاحب مولوی نورمحل ضلع جالندھر ۱۸۷

    غلام نبی ۱۷۸

    غلام نبی صاحب شیخ بھیرہ ۱۷۴

    غلام نبی صاحب تاجرکتب راولپنڈی ۱۸۶

    غلام یٰسین صاحب بریارتحصیل رعیہ ۱۸۹

    ف،ق

    فارسٹر

    کشمیریوں کو بنی اسرائیل سمجھنا ۹۴،۹۵،۱۰۴

    فاطمہ رضی اللہ عنہا ۲۷۴،۲۸۶،۲۸۷

    کشف میں حضرت اقدسؑ کا آپ کی ران پر سر رکھنا ۲۰۲ ح

    فتح الدین صاحب بھیرہ ضلع شاہ پور



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 684

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 684

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/684/mode/1up

    52

    فتح الدین صاحب مسگرمحلہ لوہاراں ضلع شاہ پور ۱۸۸

    فتح خان پٹھان ۲۹۱،۲۹۳

    فتح شریف صاحب ۱۸۳

    فتح علی شاہ ڈپٹی کلکٹر نہر ۵۴۷

    فتح علی شاہ صاحب، خان بہادر ضلع شاہ پور ۱۷۳

    فرائر

    اس کا ہرات کے علاقہ میں یہود کا ذکر کرنا ۹۷

    فرعون(موسیٰ ؑ کے زمانے کا) ۳۰۵،۳۸۸،۵۲۳،۵۲۴

    فرعون(یوسف ؑ کے زمانے کا) ۵۰۳ح

    فرمان علی صاحب فقیر،حجکہ نزد بھیرہ ۱۷۶

    فرید الدین احمد

    اپنی کتاب رسالہ انساب افغانیہ میں بنی ا فاغنہ کے نام کی نسبت رائے ۱۰۲،۱۰۳

    فضل احمد، مرزا ( فرزند حضرت مسیح موعود ؑ )۱۹۲،۲۱۴

    فضل الٰہی صاحب بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۸۸

    فضل الٰہی صاحب بھیرہ ۱۸۹

    فضل الٰہی صاحب بھیرہ ۱۸۹

    فضل الٰہی صاحب زرگر،بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۷۶

    فضل الٰہی صاحب شیخ بھیرہ ۱۷۴

    فضل الدین صاحب بھیرہ ۱۸۹

    فضل حسین صاحب۔چاند ۱۸۹

    فضل دین ،حکیم مولوی

    ۶۲،۳۲۹،۳۴۳،ٹائیٹل ستارہ قیصریہ

    فضل دین پلیڈر چیف کورٹ ۳۱۱

    فضل کریم صاحب سوداگرراولپنڈی ۱۸۱

    فقیرحسن امیرشاہ صاحب سجادہ نشین ۱۹۱

    فیض رحیم ۴۷۳

    فیض علی ساکن خوشحالہ ۱۸۸

    قابیل (حضرت آدم علیہ السلام کا بیٹا) ۳۶۵ح

    قادربخش ،احمدآبادضلع جہلم ۱۷۹

    قاسم علی ۱۷۸

    قطب الدین صاحب صوبہ دار ۱۸۰

    قریش

    مہدی قریش میں سے ہوگا ۷

    قطب الدین خاں صاحب ۱۸۸

    قطب الدین شیرازی ۵۸

    قیافا ۳۱

    قیس ۱۰۶

    آنحضرتؐ نے اس کا نام عبد الرشید اور پہطان لقب رکھا ۹۵، ۱۰۲

    افغانوں کے مطابق قیس نے افغان کی لڑکی سے نکاح کیا جس سے تین لڑکے پیدا ہوئے



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 685

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 685

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/685/mode/1up

    53

    حضرت خالد بن ولیدؓ نے آ کر آنحضرتؐ کی بعثت کی خبر دی جس پر افغانوں کے پانچ چھ بڑے سرداروں نے جا کر نبی کریم ؐ سے ملاقات کی ۹۵

    ک،گ

    کاکر ۱۰۰

    کاکری (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    کبیر ابن ذکریا ۵۹

    کرشن ۳۳۸

    کرلن

    اس کے بیٹوں کے اسماء ۱۰۰

    کریم بخش صاحب دکاندارجہلم ۱۸۷

    کرم داد خانصاحب نمبردار کوٹ رعیہ ۱۹۱

    کس ۱۰۰

    کسریٰ دیکھئے ’’خسرو پرویز‘‘

    کسی (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    کش

    درانی قبیلہ کی نسل اس سے شروع ہوتی ہے ۱۰۵،۱۰۶

    کمال الدین،بی اے پلیڈر خواجہ ۳۴۳

    کوڈا

    ایک شخص ساکن امرتسر ۲۹۵

    گرگشت(ارکش) اس کے بیٹوں کے نام ۱۰۰

    گل محمد، مرزا

    دہلی کے چغتائی بادشاہ وقت کی نالیاقتی کے وقت ان کے تخت پر بٹھائے جانے کی تجویزاور آپ کی خوبیوں کا ذکر ۱۱۲

    گل محمدصاحب مدرس ہائی سکول بھیرہ ۱۷۵

    گلاب دین صاحب مدرس گرل سکول رہتاس ۱۸۰

    گلاب خاں صاحب سب اوورسیرسیالکوٹ حال راولپنڈی ۱۸۶

    گلاب شاہ صاحب سیّدامام مسجد جامع بدوملّی ۱۹۱

    ل،م،ن

    لدّھے شاہ صاحب سیّد۔میرووال ۱۸۹

    لچھمن دَاس ۱۹۰

    لعل شاہ صاحب گولڑہ۔حال سیالکوٹ ۱۸۸

    لنڈیپور ۱۰۱

    لنڈیپوری (ایک افغان قبیلہ) ۱۰۱

    لوہان ۱۰۰

    لوہانی(ایک افغان قبیلہ) ۱۰۰

    لیکھرام پشاوری، پنڈت

    ۳۶۷،۳۶۸،۳۶۹،۳۹۰،۳۸۸،۳۸۷،۳۸۵،۵۵۲

    لیکھرام کی کتابوں کی حقیقت ۴۰۰

    اس کی موت کی پیشگوئی اور اس کی تفصیلات ۳۷۱

    ہیبت ناک نشان اور تیغ بران کے ذریعہ لیکھرام کی موت کی پیشگوئی



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 686

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 686

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/686/mode/1up

    54

    کرامات الصادقین اور برکات الدعا میں اس کی موت کی نسبت پیشگوئی اور اس پیشگوئی میں حق کے طالبوں کے لئے دو نئے ثبوت ۴۷۰

    کرامات الصادقین کے ایک عربی شعر میں لیکھرام کی موت کا دن اور تاریخ بھی بتلائی گئی ہے ۳۹۷،۳۹۶

    اس پیشگوئی کی اہمیت اور عظمت ۴۷۱

    مبارکہ کے عقیقہ کے روز لیکھرام کے مارے جانے کے نشان کی اطلاع ملنا ۴۵۱

    لیکھرام کے قتل کے شبہ میں ناحق گھر کی تلاشی کروانا اس ابتلاء پورا ہونا ہے ۱۵۳

    لیکھرام کی گوسالہ سامری سے مشابہتیں ۳۹۸،۳۹۹

    اس کے قصے کی خسرو پرویز کے قصے سے مشابہت ۳۷۷

    اس پیشگوئی میں حضرت اقدس کی حضرت موسیٰ سے مشابہت۴۰۱

    لیکھرام کی پیشگوئی میں پائے جانے والے خارق عادت امور۴۰۳

    پنجاب کے سارے لوگ لیکھرام کی پیشگوئی سے مطلع تھے ۴۰۳

    لیکھرام کااپنی کتابوں میں قتل کی پیشگوئی شائع کرنا ۴۰۳

    لیکھرام کی پیشگوئی کے عظیم الشان ہونے کا ثبوت ۴۰۲

    حدیث کی رو سے لیکھرام کی پیشگوئی کی عظمت کا ثبوت ۴۰۲ح

    لیکھرام کے مرنے کے بعد خدا کا طاعون پھیلانا ۴۰۱

    اس کی نسبت حضرت اقدسؑ کا کشف ۳۹۴

    لیکھرام کو قتل کرنے والے فرشتہ کے خونی آنکھوں کے ساتھ نظر آنے کی وجہ ۱۹۵ح

    پیشگوئی لیکھرام کے قریبًا چارہزار مصدقین کے دستخط ۱۹۱

    لیکھرام کے قتل کے نشان کے ظاہر ہونے پر ۳۰۰ مسلمان اور ہندو گواہ ہیں ۴۵۷

    اخبار سماچار کا لیکھرام کے قتل پر حضرت اقدس کے خلاف واویلہ کرنا ۳۹۶ح

    ہندو اخبار کا سمجھنا کہ لیکھرام عید کے دن قتل ہوگا ۳۹۷،۳۹۸

    لیکھرام کی نسبت عربی شعر ستعرف یوم العید کے الفاظ پر بعض نادانوں کے اعراض کا جواب ۳۹۷

    اس پیشگوئی میں کوئی شرط نہ تھی لہٰذا تاخیر نہ کی گئی ۱۵۰

    پیشگوئی کے بعد لیکھرام کا نبی کریم ﷺ کو گالیا ں دینا ۱۵۰

    لیکھرام کی پیشگوئی جلالی ہے ۱۵۰،۱۵۱،۳۴۴

    لیکھرام اپنی بدزبانی کی وجہ سے ہلاک ہوا ۳۷۸

    اخبار انیس ہندمیرٹھ کا پیشگوئی لیکھرام پر اعتراض ۳۹۰

    ماجھے خان ۲۹۵

    مالک ، امام

    آپ حضرت مسیح ؑ کی وفات کے قائل تھے ۵۸۷

    مامون الرشید ۵۷

    مبارک احمد، مرزا (فرزند حضرت اقدسؑ ) ۵۴۹

    ان کی پیدائش کی پیشگوئی ۴۴۴

    چوتھے لڑکے مرزا مبارک احمد کی پیدائش اور جلد فوت ہونے کی پیشگوئی ۲۱۳

    آپ کی پیدائش اور عقیقہ کا دن ۲۲۱

    حضرت مسیح نے تو صرف مہد میں باتیں کیں لیکن حضرت مرزا مبارک احمد نے ماں کے پیٹ میں دو مرتبہ باتیں کیں ۲۱۷

    مبارکہ، سیدہ (دختر حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ان کے پیدا ہونے کی پیشگوئی ۴۵۱

    عقیقہ کے روز لیکھرام کے مارے جانے کا نشان پورا ہونا۴۵۱

    متھرا داس



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 687

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 687

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/687/mode/1up

    55

    محمد مصطفےٰ صلی اللہ علیہ وسلم

    والدہ کے شکم میں آپ کا نام محمدؐ رکھا گیا ۵۲۲

    آنحضرتؐ کی صداقت کی قرآنی دلیل ۲۸۲

    آپؐ کے محمد اور احمد نام میں مخفی پیشگوئی ۵۲۷

    نبی کریمؐ کا ابراہیم ؑ کی خُو اور طبیعت پر آنا ۴۷۶

    نبی کریم ؐ اور ابراہیمؑ کی مشابہتیں ۴۷۶ح

    مثیل موسیٰ کا سلسلہ آپؐ سے شروع ہوا ۵۲۱

    اسماعیل ؑ کی اولاد سے آپؐ کا پیدا ہونا ۵۲۲

    قرآن کریم میں آنحضرتؐ کی بیان فرمودہ خوبیاں ۲۸۱

    آپؐ کی آل سے مراد ۳۶۳

    کافروں کاآپ ؐ کے قتل کے لئے مکہ میں دارالندوۃ کے مقام پر جمع ہونا ۳۱

    آپؐ کے لیکھرام اور آتھم کے نشانوں کی طرح جلالی اور جمالی نشان ۳۷۲

    آپؐ کے خلاف قتل ،تکذیب کے منصوبے بنانے کا ذکر ۳۵۷

    آپ ؐ کے دعویٰ کے زمانہ میں بنی اسرائیل کا افغانستان سے آنا ۹۵

    نبی کریم ﷺ نے بحکم الہٰی مدینہ کی طرف ہجرت کی ۱۰

    مکہ کی فتح کے وقت آپؐ نے سب کو معاف کر دیا ۱۰

    آپؐ کا ہرقل کو دعوت اسلام کا خط لکھنا ۳۷۲

    آپ ؐ کی وفات کا ذکر ۵۱۹،۵۷۷

    دشمنوں کے مقابل آپؐ کی حفاظت کی بشارت ۴۵۲ح،۴۷۶ح

    آپؐ کے قتل نہ ہونے اور رفع الی اللہ کی بشارت ۴۵۴ح

    آپؐ سے محبت مسلمان کی طبیعت کا حصہ ہے ۴۹۱

    آخری زمانہ میں مسیح موعودؑ کا آپؐ سے عیوب کو دور کرنے کے لئے ظاہر ہونا ۴۵۳ح

    آپ ؐ کی وفات کے بعد صحابہ کا تمام انبیاء کی وفات پر اجماع ۵۱۹

    آنحضرت ؐ کی ایک پیشگوئی دربارہ مہدی معہود ۳۶۲،۳۶۳

    آپؐ کی پیشگوئی کی تھی کہ مسیح موعود ؑ کے ہاتھ کسر صلیب ہوگی ۶۴

    حضرت موسیٰ اور آپؐ میں مماثلتیں ۵۲۳

    موسیٰ اور نبی کریمؐ کی چودھویں صدی کے حوالے سے مماثلت ۲۹

    آپؐ کے دشمن اور کسی بدزبان کے مرنے کے بعد اس قوم میں ویسی خصلت کا انسان پیدا ہونا محال خیال ہے ۳۷۹

    نبی کریمؐ کی روحانی زندگی اور پاک جلال کا ثبوت ۱۴۱

    آپ کی روحانی زندگی ،آپ کے زندہ ہونے اور خدا کے دائیں ہاتھ بیٹھنے کا ثبوت ۱۳۸،۱۳۹

    نبی کریم پر درود ۱۳۹

    نبی کریم ﷺ کی فیض بخش اور خدانما زندگی کا ثبوت ۱۴۰

    آپؐ کے بعض امور پر جاہلوں کے اعتراضات ۵۱۴

    عیسائی مؤلفوں کا آپ پر الزام تراشی کرنا ۴۹۰

    آپؐ کی نسبت جبر کے عقیدہ کا رد ۱۱،۱۲

    قیصر کا نبی کریمؐ کے پاؤں دھونے کی خواہش کا اظہار ۳۷۵

    عیسائیوں کے نبی کریم ﷺ کی ذات پر اعتراضات ۴۲۱ح

    محمد بن عبد الکریم الشہرستانی ۵۸۰،۵۸۰ح

    محمد، شیخ ابن شمس الدین بمبئی ۱۸۲

    محمدابراہیم بمبئی چیچپوکلی ۱۸۳

    محمدابراہیم بن منشی زین الدین انجینئر بمبئی ۱۸۳

    محمدالدین ،بھیرہ ۱۸۹

    محمدالدین ،ایجنٹ،بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۷۶



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 688

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 688

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/688/mode/1up

    56

    محمدالدین ،کلرک اگزیمنرآفس ریلوے بٹالہ ۱۸۵

    محمدالدین ،منشی ،مدرس میرووال ۱۸۷

    محمدالدین ،میرووال ۱۸۹

    محمداسلام ،بھیرہ ضلع شاہ پور ۱۸۸

    محمد اسماعیل ۲۹۵،۵۹۶

    محمد اسماعیل مخاطب ۵۸

    محمد اکبر ارزانی ۵۹

    محمداسمٰعیل ،جھنگ مدرسہ ۱۸۸

    محمد اسمٰعیل ،نقشہ نویس دہلی ۱۸۶

    محمداسمٰعیل ، مرزا ۱۸۳

    محمداشرف ،کوٹ بوچہ ۱۸۹

    محمداعظم ،میرووال ضلع سیالکوٹ ۱۸۹

    محمدافضل چنگوی ۱۸۶

    محمد افضل خان

    حضرت اقدسؑ کی خدمت میں سو روپے بھیجنا ۲۵۷،۲۵۸

    محمد امیر الدین ۱۷۸

    محمد بخش ، ڈپٹی انسپکٹر بٹالہ ۳۱۱،۳۲۴

    اس کی رپورٹ پر حضور ؑ پر مقدمہ ہوا ۳۰۹

    اس کی ذلت کی پیشگوئی ۴۲۵

    محمدبخش ،ہیڈکلرک دفتر نہر سرہند ۱۸۶

    محمد بقا خان ۵۸

    محمدجان ذیلدار،بدوملّی ۱۸۹

    محمد حبیب احمد جعفری، سید ۱۷۸

    محمد حسن خاں ۱۷۸

    محمد حسن، مولوی ۱۷۹

    محمد حسن خان ،سید، وزیر اعظم ریاست پٹیالہ ۲۹۱

    محمدحسین ،جھنگ مدرسہ ۱۸۸

    محمدحسین ولد منشی گلاب الدین، رہتاس ۱۸۰

    محمدحسین ،قریشی مالک وکٹوریہ پریس لاہور ۱۸۵

    محمد حسین بٹالوی

    ۲۹۸، ۲۶۳، ۲۲۴، ۲۲۸، ۳۴۷، ۳۱۸، ۳۱۴ح، ۳۲۷، ۳۲۴

    ۳۲۵، ۴۳۵تا ۴۴۰، ۴۴۴تا ۴۵۰، ۴۵۹، ۴۶۱، ۵۵۶

    ابتدائی عمر میں حضرت مسیح موعود ؑ کا ہم مکتب رہا ۲۸۳

    براہین احمدیہ چہار حصص کا ریویو لکھنا ۲۸۷

    یہ نہ صرف صرف و نحو کے علم سے ناواقف ہے بلکہ احادیث کے الفاظ سے بھی بے خبر ہے ۴۳۱

    مہدی سے متعلق حدیثوں میں اس کی دورنگی ۴۲۶

    مولوی کہلا کر اس کے گندے اخلاق ۴۳۷۔۴۳۸

    حضرت اقدس کے ایک الہام اتعجبین لامر اللّٰہ پر بٹالوی کا اعتراض ۴۲۷

    اسے عربی تفسیر لکھنے کی دعوت ۲۲۱

    اس کا حضرت اقدسؑ کی دوسری شادی پر اعتراض ۲۰۳،۲۰۴

    براہین احمدیہ میں بٹالوی کے ابتلاء کا ذکر اور اس کا پورا ہونا ۱۵۳

    اس کی اور اس کے دو رفیقوں کی ذلت کی پیشگوئی اور اس کی تفصیلات ۴۲۳،۴۲۴

    اس کی ذلت کے مواقع ۴۳۵،۴۴۴

    اس کی چھ قسم کی ذلت



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 689

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 689

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/689/mode/1up

    57

    اس کی عدالت میں کرسی مانگنے پر ذلت ۳۴۹

    اس کی نسبت ایک الہام کا پورا ہونا ۳۱۱

    اخبار عام کا ثناء اللہ امرتسری کا یہ مضمون شائع کرنا کہ ابھی بٹالوی کی کچھ ذلت نہیں ہوئی ۴۴۵

    ثناء اللہ کا کہنا کہ محمد حسین کو چار مربع زمین مل گئی ہے اور کسی ریاست سے کچھ وظیفہ مقرر ہو گیا ہے اور مسٹر ڈوئی نے بٹالوی کی منشاء کے مطابق مقدمہ کیا ہے ۴۴۸

    عدالت میں اس کا کہنا کہ مرزا صاحب نے الہام کے ذریعے مجھے عذاب کی دھمکی دی ۳۱۳

    قرآن کریم اس کو کاذب اور خائن ٹھہراتا ہے ۳۲۶

    جے ایم ڈوئی کا اس سے دستخط کروانا کہ وہ آئندہ حضرت اقدسؑ کو دجال، کافر اور کاذب نہیں کہے گا ۳۱۳،۴۳۱،۴۳۴

    اس کا بنارس تک فتوئ کفر کو بھجوانا ۴۳۱

    اس کا اعتراض کرنا کہ جس مقدمہ کا فیصلہ ۲۴ فروری ۱۸۹۹ء کو ہوا حضرت اقدس اس میں بری نہیں بلکہ ڈسچارج ہوئے تھے۔ اس کا جواب ۳۱۵،۴۳۹

    لفظ بَری کے حوالے سے قسم دے کر حضرت اقدسؑ کا اس سے جواب طلب کرنا ۳۲۰

    بٹالوی کا گورنمنٹ کو یہ خبر دینا کہ حضرت اقدس ؑ کے گورنمنٹ کی نسبت اچھے خیالات نہیں ۴۵۴

    حضرت اقدسؑ کے خلاف اس کا بغض ۴۵۹

    محمد حسین خان، وزیر پٹیالہ ۲۰۵

    محمدحسین مشہدی ۱۹۱

    محمدحسین ،مولوی،ضلع جہلم ۱۷۹

    محمدحسین ،مولوی معلّم عربی ۱۸۱

    محمدحیات ،جھنگ مدرسہ ۱۸۸

    محمد حیات خان، نواب، سردار

    یہ معطل ہوئے اور ان پر مقدمہ چلایا گیا اور حضرت مسیح موعود

    علیہ السلام کی دعا سے بری ہوئے ۱۹۲،۱۹۳

    محمد خاں افغان ۱۷۸

    محمد خان یوسف رئیس امرتسری ۵۵۲

    محمددین ،حکیم ضلع شاہ پورتحصیل بھیرہ ۱۷۴

    محمدرفیق حسبوی ۱۸۷

    محمدشاہ ،ستراہ،پسرور ۱۸۹

    محمدشاہ ،امام مسجدموضع ہریانہ ۱۸۰

    محمدشاہ ،سیّد، نورپورپسرور ۱۹۱

    محمد شریف ، حکیم ۲۰۳،۱۹۸

    ان کی معرفت الیس اللہ کی انگوٹھی بنوائی گئی ۱۹۸

    ان کو حضور ؑ نے اپنے بھائی کے بارہ میں خواب سنائی ۲۱۱

    محمدشریف احمد،خواجہ پشاوری ساکن بھیرہ ۱۸۸

    محمد شریف الدین بہاولپوری ۵۹

    محمد شریف دہلوی ۵۹

    محمد صادق، مفتی ۴۱۵

    حضرت اقدسؑ کا خواب میں انہیں دیکھنااور اس کاذکر خیر ۵۰۴

    محمدعالم ،چکیاہی ۱۸۸

    محمد عباد اللہ بیگ قادری پانی پتی ۱۷۸

    محمدعطاء اللہ ،ساکن خوشحالہ ۱۸۷

    محمد علی ، مولوی ۳۱۰،۳۳۰،۳۳۲،



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 690

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 690

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/690/mode/1up

    58

    محمدعلی خاں،نمبردارمیرووال ۱۸۹

    محمد علی خان جھجر (نواب)

    ان کے خط کی آمد سے قبل حضرت مسیح موعود علیہ السلام کاان کو خط لکھ کر ان کو پیش آمدہ مسئلہ کا خط لکھا ۲۰۴،۲۰۵

    محمد علی خاں سوار ۱۷۸

    محمدعمر،ضلع گجرات ۱۸۷

    محمدفیروزدین ڈسکوی، مدرس ۱۸۲

    محمدکریم بخش چوہدری، نمبرداربھنڈی نین ۱۸۷

    محمدگل ،سیدپور ۱۸۸

    محمدمبارک شیخ بھیرہ ۱۷۶

    محمدنعیم ،ملک، بی۔اے ۱۸۴

    محمد نور کریم ، حکیم ۵۹

    محمدیٰمین صاحب ساکن خوشحالہ ۱۸۸

    محمد یعقوب ،منشی ۵۶۳

    انہوں نے قسم کھا کر بتایا کہ مولوی عبداللہ غزنوی نے گواہی دی تھی کہ آسمان سے نور اترا جومرزا غلام احمد قادیانی ہے ۵۴۶

    محمد یعقوب علی ۱۷۸

    محمد یوسف ،حافظ ۵۴۶،۵۶۰

    محمود سید، مسٹر

    اس کی اپنے والد سید احمد خان کے متعلق گواہی کہ اگر میں نقصان کے وقت علیگڈھ نہ ہوتا تو میرے والد صاحب اس دن غم سے مر جاتے ۴۷۲

    محمود عالم مولوی، ایڈیٹر پیسہ اخبار لاہور ۴۱۴

    محی الدین ابن عربی ۴۸۲

    محی الدین احمد،شاہ آباد ۱۸۱،۱۸۷

    مریم علیہا السلام ۴۸۴

    مستقیم ،امام مسجدبدوملّی ۱۹۰

    مسیح ابن مریم علیہ السلام

    حضرت بدھ کی وفات کے پانچ سو سال بعد چھٹی صدی میں پیدا ہوئے ۸۵

    آپ بلاد شام کے علاقے کے رہنے والے تھے اس لئے آپ ؑ بگوا یعنی سفید تھے ۸۳

    ناحق انہیں یونانی آدمی تصور کیا گیا ہے ۱۴۱

    آپ کی مادری زبان عبرانی تھی کوئی ثبوت نہیں کہ ایک فقرہ یونانی کسی سے پڑھا ہو ۱۴۲

    آپ کی سادہ زندگی اور زبان نہ لکھنے کا ثبوت ۱۴۲

    آپ کا قول کہ نبی بے عزت نہیں ہوتا مگر اپنے وطن میں ۲۴۴

    مسیح کے متعلق دو باتیں جنہیں اسلام کا ہر فرقہ تسلیم کرتا ہے ۱۵۵

    حضرت مسیح نے خود تراشیدہ نشان مانگنے والوں کے بارہ میں لکھا ہے کہ اس زمانہ کے حرام کار لوگ نشان مانگتے ہیں ۵۴۰

    اقتراحی نشان مانگنے والے کو ّ*** کہا ۵۵۸

    شیطان کا حضرت عیسیٰ ؑ سے اقتراحی معجزہ مانگنا ۵۶۱

    آپ کا بغیر حاضری عدالت کے خود بخود قسم کھانا ۱۴۹

    خدا کی رحمت کا تقاضا یہی ہے کہ مسیح کی گستمنی نامی مقام میں کی گئی دعا ضرور قبول ہوگئی ۳۱

    حضرت عیسیٰ ؑ کو شہر کی بدکار عورت کا تیل ملنا ۱۸

    اناجیل میں مسیح کے ماں کے بلانے کی کچھ پرواہ نہ کرنے کا قصہ عام اخلاقی حالت سے گرا ہوا ہے ۸۸،۸۹

    دعا کے حوالے سے ایک قاضی کی مثال بیان کرنا ۳۱



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 691

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 691

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/691/mode/1up

    59

    ان پر دشمنوں کا اعتراض کہ وہ تقویٰ کے پابندنہ تھے ۴۲۱ح

    مسیح نے شاگردوں کو تعلیم دی تھی کہ اگر دعا کرو گے تو قبو ل کی جائے گی ۳۱

    شیطان سے آزمائے جانے والے واقعہ کی حقیقت ۷۴

    مسیح کی تعلیم کے کامل نہ ہونے کا ثبوت ۱۶۲

    اس الزام کا جواب کہ آپ کو دیانت اور امانت کی پرواہ نہ تھی۴۲۱ح

    حضرت مسیح کی آنے والے نبی کو قبول کرنے کی وصیت اور بنی اسرائیل کے دس فرقوں کا مسلمان ہونا ۵۳

    یسوع کی نسبت سخت کلمات استعمال کئے ہیں مسیح کی نسبت نہیں جو بندہ اور رسول کہلاتا ہے اور رسول اللہ ؐ کا مصدق ہے ۳۰۵ح

    مقام

    نبوت سے قبل آپ کی کوئی عظمت تسلیم نہیں کی گئی ۶۲

    آپ کی نبوت کی علت غائی ۱۷

    دنیا اور آخرت میں مسیح کی عظمت کے متعلق قرآنی آیات ۵۳

    مسیح کی وجہ تسمیہ ۷۱

    آپ پر ایک سلسلہ کا خاتمہ ۵۲۰

    اناجیل میں آپ کے کمال پاکیزگی محبت اور معرفت کے دعاوی ۱۹

    اناجیل میں ایک طرف تو مسیح کا پاک چال چلن بتایا جاتا ہے اور دوسری طرف ایسے الزام لگانا جو کسی راستباز کے ہرگز شایان شان نہیں ۴۸

    انجیل میں آپ کو نو ر کہا گیا ہے ۱۲۱

    جس کا نام انجیل نو ر رکھا گیا کیا اس پر لفظ *** کا اطلاق ہوسکتا ہے۱۶۹

    مسیح کے کاموں اور پیشگوئیوں کی فضیلت ۱۶۱

    آپ کے وجیہ ہونے کے متعلق قرآنی گواہی ۵۲

    ملک پنجاب میں مسیح کو ہجرت کے ذریعہ عزت ملنا ۵۳

    ان سے محبت ایک مسلمان کی طبیعت کا حصہ ہے ۴۹۱

    ہمارا ایمان ہے کہ خدا کی طرف سے تھے مگر ان کی روحانی زندگی کاکوئی ثبوت نہیں ۔ اس کا سبب ۱۴۱

    دنیا سے بالکل الگ تھے ۴۸۸

    مخلوق کی بھلائی کے لئے صلیب پر چڑھنا ۴۹۸

    مسیح کی صلیبی موت سے نجات سے راستباز وں کو خدا کے فضل پر بڑی امید بڑھتی ہے کہ جس طرح اپنے بندوں کو چاہے بچا لے ۵۲

    صلیب کے عقیدہ کی رو سے مسیح کے سچا نبی نہ ہونے کا ثبوت ۱۶۹

    عیسائیوں کا آپ پر *** کے لفظ کا اطلاق کرنا ۱۲۱

    حضرت مسیح کو *** ٹھہرانے کا عقیدہ جو عیسائی مذہب کا اصل الاصول ہے صریح البطلان ہے ۲۳۶

    حضرت عیسیٰ کی تطہیر کے متعلق نبی کریم ﷺ کی گواہی ۵۴

    حضرت مسیح کے ملعون ہونے کے عقیدہ کا ردّ ۱۸،۱۹

    ’’مسیح ہندوستان میں ‘‘کی روشنی میں صلیبی موت سے نجات

    اناجیل سے شہادتیں

    ۱۔ متی ۴۰؍۱۲ میں یونس نبی جیسا نشان دکھانے کی پیشگوئی ۱۶

    ۲۔ مقدس کتاب میں لکھا کہ جو کاٹھ پر لٹکایا گیا سو *** ہے اور عیسیٰ جیسے برگزیدہ پر یہ تجویز سخت ظلم اور ناانصافی ہے ۱۷

    ۳۔ متی ۲۶؍۳۲ میں ہے کہ جی اٹھنے کے بعد جلیل کی طرف گیا۱۹

    مرقس ۱۴۔۹؍۱۶کے مطابق قبر سے نکل کر گلیل کی طرف جانا اور حواریوں کے ساتھ مچھلی کا ٹکڑا اور شہد کھانا ۲۱،۲۴

    ۴۔ برنباس کی انجیل میں لکھا ہے کہ صلیب پر نہ چڑھا اور

    نہ صلیب پر جان دی ۲۰،۲۱

    ۵۔جمعہ کے روز اخیر حصہ میں صلیب دیا جانا اور سبت کی وجہ سے جلدی اتارا جانا اور اس کے ساتھ آسمانی اسباب ۲۲،



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 692

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 692

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/692/mode/1up

    60

    ۶۔ مرقس ۴۴۔۴۲؍۵ میں پلاطوس کا قول کہ ایسا جلد مر گیا؟ ۲۷

    ۷۔ یوحنا ۳۴۔۳۱؍۱۹ کے مطابق مسیح کی ہڈیاں نہ توڑی جانا اور ایک سپاہی کے پسلی چھیدنے سے خون اور پانی نکلنا ۲۷

    ۸۔یوحنا ۱۲؍۱۹ میں پلاطوس کی بیوی کا خواب اور پلاطوس کی تدبیر۲۸

    ۹۔متی ۴۶۔۳۶؍۲۶ کے مطابق مسیح کی ایلی ایلی لما سبقتنی کی دعا ۳۰

    ۱۰۔ مسیح، موسیٰ ؑ اور نبی کریمؐ کے قتل کرنے کے لئے مشورے اور تینوں کا بچایا جانا ۳۱

    ۱۱۔ متی ۳۶۔۳۵؍۲۳ میں پیشگوئی کہ یہود کا نبیوں کو قتل کرنے کا سلسلہ زکریا نبی پر ختم ہو گیا تھا ۳۴

    ۱۲۔متی ۲۸؍۱۶: ان میں سے جو یہاں کھڑے ہیں بعضے ہیں کہ جب تک ابن آدم کو اپنی بادشاہت میں آتے دیکھ نہ لیں موت کا مزہ نہ چکھیں گے۔ ۳۵

    ۱۳۔ متی ۳۰؍۲۴ میں ہے کہ ایک زمانہ ایسا آنے والا ہے جبکہ آسمان سے ایسے علوم اور شہادتیں پیدا ہو جائیں گی جو آپ کی الوہیت یا صلیب پر فوت ہونے یا آسمان پر آنے اور جانے کے عقیدہ کا باطل ہونا ثابت کر دیں گی ۳۸

    ۱۴۔ متی ۵۲؍۲۷ میں ہے: اور قبریں کھل گئیں اور بہت لاشیں پاک لوگوں کی جو آرام میں تھیں اٹھیں اور اٹھنے کے بعد قبروں میں سے نکل کر اور مقدس شہر میں جا کر بہتوں کو نظر آئیں ۴۱

    ۱۵۔ اس اعتراض کا جواب کہ انجیلوں میں تو بار بار ذکر ہے کہ مسیح ؑ فوت ہو گئے اور زندہ ہو کر آسمان پر چلے گئے ۴۶

    قرآن سے شہادتیں

    ۱۔ وما قتلوہ وما صلبوہ ولکن شبہ لھم ۵۱

    ۲۔ وجیھا فی الدنیا والآخرۃ ومن المقربین ۵۲

    ۳۔وجعلنی مبارکا اینما کنت اورومطھرک من الذین کفروا ۵۴

    احادیث سے شہادتیں

    ۱۔مسیح کی عمر ایک سو پچیس برس ہوئی ۵۵

    ۲۔ کنزالعمال کی حدیث: اوحی اللہ تعالٰی الی عیسٰی ان یٰعیسٰی انتقل من مکان الی مکان لئلا تعرف فتوذی۵۶

    ۳۔ کان عیسٰی ابن مریم یسیح فاذا امسی اکل بقل الصحراء ویشرب الماء القراح ۵۶

    ۴۔قال احب شیء الی اللّٰہ الغرباء قیل ای شیء الغرباء، قال الذین یفرّون بدینھم و یجتمعون الٰی عیسی ابن مریم۵۶

    طبابت کی کتابوں سے شہادتیں

    ۱۔مرہم عیسیٰ کے نسخہ کا ذکر اور اس نسخہ کی مفصل تحقیق ۵۶

    ۲۔ ان کتب کی فہرست جن میں یہ نسخہ پایا گیا ۵۸

    ۳۔ اس اعتراض کا جواب کہ یہ مرہم نبوت کے زمانہ سے پہلے یا نبوت کے زمانہ کی چوٹوں کے لئے یہ بنائی گئی ۶۲

    ۴۔مقدر تھا کہ صلیبی اعتقاد کا خاتمہ مسیح موعود کے ہاتھ سے ہو اس لئے کسی کا ذہن اس کی طرف نہیں گیا ۶۴

    تاریخی کتب سے شہادتیں

    اسلامی کتابوں سے شہادتیں

    ۱۔ کتاب روضۃ الصفا کا حوالہ جس میں مسیح کی سیاحت کا ذکرہے۶۶

    ۲۔حضرت مسیح کے سفر کا نقشہ ۶۸

    ۳۔ سراج الملوک میں مسیح ؑ کی نسبت لکھا ہے: راس الزاھدین وامام السائحین ۷۱

    ۴۔ لسان العرب میں ہے:قیل سمی عیسی بمسیح لانہ کان سائحا فی الارض لا یستقر ۷۱

    بدھ مذہب کی کتابوں سے شہادتیں

    ۱۔ بدھ کا خطابوں اور واقعات میں مسیح سے مشابہ ہونا ۷۲

    ۲۔ بدھ اور مسیح کی اخلاقی تعلیم میں مشابہت



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 693

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 693

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/693/mode/1up

    61

    ۳۔گوتم بدھ نے ایک اور آنے والے بدھ کی پیشگوئی کی جس کا نام متیّا بیان کیا تھا۔ وہ کتابیں جن میں یہ پیشگوئی پائی جاتی ہے ۸۰

    ۴۔بدھ کے چھٹے مرید کا نام یسا تھا ۸۵

    ۵۔ بدھ کا ایک جانشین راحولتا کے نام سے گزرا ہے ۸۸

    تاریخی کتابوں سے شہادتیں

    بنی اسرائیل کے گمشدہ قبائل کی وجہ سے مسیح کا ان ملکوں میں آناناگزیرہے

    ۱۔ڈاکٹر برنیر کی کشمیریوں کے بنی اسرائیل ہونے کی گواہی ۹۴

    ۲۔ فارسٹر نامی انگریزی کی گواہی ۹۵

    ۳۔ ایچ ڈبلیو بلیو سی ایس آئی کی گواہی ۹۵

    ۴۔کتاب طبقات ناصری کی گواہی ۹۵

    ۵۔ ای بیلفور کی گواہی ۹۶

    ۶۔ڈاکٹر وولف کی گواہی ۹۶

    ۷۔پرسٹر جان کی گواہی ۹۶

    ۸۔ڈاکٹر مور کی گواہی ۹۷

    ۹۔فرانسیسی سیاح فرائر کی گواہی ۹۷

    ۱۰۔ربی بن یمین کی گواہی ۹۷

    ۱۱۔جوزی فس کی گواہی ۹۷

    ۱۲۔سینٹ جیروم کی گواہی ۹۷

    ۱۳۔جی ٹی ویگن ایف جی ایس کی گواہی ۹۸

    ۱۴۔جیمز برائیس کی گواہی ۹۸

    ۱۵۔کرنیل جی بی میلس کی گواہی ۹۹

    ۱۶۔جی پی فرائر کی گواہی ۹۹

    ۱۷۔خواجہ نعمت اللہ ہراتی کی گواہی ۱۰۱

    ۱۸۔اے کے جانسٹن کی گواہی ۱۰۴

    ۱۹۔سول اینڈ ملٹری گزٹ کے ایک مضمون کی گواہی ۱۰۴

    واقعہ صلیب اور اسکی تفصیل

    حضرت مسیح علیہ السلام جس دن صلیب پر چڑھائے گئے وہ جمعہ کا دن تھا ۲۴۳

    صلیب کے وقت سخت آندھی آئی سخت تاریکی چھاگئی ڈرانے والا زلزلہ آیا ۲۴۳

    یہود کا سبت کی وجہ سے حضرت مسیح کو صلیب سے اتارنا ۲۳

    یہود ہمیشہ اس بات کا جواب دینے سے قاصر رہے کہ کیونکر حضرت مسیح کی جان ہڈیاں توڑ ے بغیر صرف دو تین گھنٹہ میں نکل گئی ۵۱

    مسیح کو صلیب دینے کے وقت بھونچال کے ذریعہ یہود پر بزدلی، خوف اور عذاب کا اندیشہ طاری کردیا ۵۲

    فرشتے کا پلاطوس کی بیوی سے کہنا کہ اگر یسوع مسیح کو پھانسی مل گئی تو تمہاری خیر نہیں ہے ۱۲۴،۱۲۵،۱۲۵ح،۲۴۲

    پیلاطوس کا مسیح کے بارہ میں کہنا کہ میں اس میں کوئی گناہ نہیں دیکھتا ۱۲۵ح

    حضرت مسیح نے تمام رات سجدہ میں گر کر جناب الٰہی میں دعا کر کے گزار دی ۳۰

    ایک باغ میں اپنی رہائی کے لئے تمام رات دعا کرنا ۲۴۰

    انجیل برنباس میں آپ کو صلیب ملنے سے انکار ۲۴۰

    صلیب پر نہیں مرا نہ کوئی نیا جلالی جسم پایا بلکہ ایک غشی کی حالت ہوگئی جو مرنے سے مشابہ تھی ۲۶

    پسلی چھیدنے سے خون نکلا جبکہ مردہ کا خون جم جاتا ہے ۲۷

    مسیح کو مردہ قرار دینا ایک بہانہ تھا جو انہیں کی ہڈیاں توڑنے سے بچانے کے لئے بنایا گیا تھا ۲۸

    صلیب کے وقت خدا کے حضور دعائیں کرنا ۵۱۶

    حضرت مسیح علیہ السلام کو جب صلیب پر چڑھایا گیا تو بے اختیار ان کے منہ سے نکلا۔ ایلی ایلی لما سبقتانی



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 694

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 694

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/694/mode/1up

    62

    مسیح کی جان بچانے کے لئے خدائی تدبیر ۵۲

    صلیبی موت سے نجات کے زمینی اور آسمانی اسباب ۲۲

    پلاطوس کا مسیح کے چھڑانے میں حکمت عملی دکھانا ۲۸

    قیصر کی نیک نیتی کے مطابق اللہ کا آپ کو اتارنا ۱۱۸

    آپ کے مصلو ب اور ملعون ہونے کے عقیدہ کی تردید ۱۷،۱۲۴

    کشمیر اور ہندوستان وغیرہ کی طرف سفر

    آپ ؑ کا نام سیاح بلکہ سیاحوں کا سردار رکھا جانے کے سبب ۵۵ ، ۷۱

    مسیح کا جان بچانے کے لئے جلیل کی طرف ۷۰ کوس کا سفر کرنا ۴۹

    صلیب سے زندہ بچنے اور قوم سے ملنے کی پیشگوئی ۱۶

    نصیبین کی طرف سفر کی غرض ۶۹

    نصیبین کی راہ سے افغانستان آنا ۱۲۳

    آپ کے افغانستا ن میں آنے کے امکان کا ذکر ۷۰

    تبت کی طرف جانے کا ثبوت ۸۲

    صلیب سے بچایا جانا اور کشمیر جانا ۴۹۹

    کشمیر کی طرف آنے کا مسیح ؑ کے سفر کا نقشہ ۶۸

    کشمیر کی طرف سیاحت کے ارادہ کا مقصد ۶۹

    حضرت مسیح کے سفر کا راستہ ۶۹

    کشمیر کی طرف حضرت عیسیٰ ؑ کی ہجرت ۱۴۴

    اپنی ان قوموں کی طرف جانا جو کشمیر میں اور تبت میں تھیں ۱۷

    پنجاب اور کشمیر کے علاقہ میں آپ کو بڑی وجاہت ملی ۵۳

    حضرت مسیح کا پنجاب آنا اور اس کا مقصد ۶۹

    آریوں کا کہناکہ ہندوستان کے سفر کیے بعد بدھ مذہب کی باتیں سن کر بعد میں وطن جا کر اسی کے موافق انجیل بنالی ۷۵

    واقعہ صلیب سے قبل ہندوستان آنے کا عقیدہ کا رد ۷۵

    کوہ پغمان میں مسیح کا رہنا ۱۲۴

    حضرت مسیح کے سفر ہندوستان کی علت غائی ۱۰۷

    حضرت مسیح ؑ اور حضرت بدھ ؑ

    آپ کے بدھ کے مرید ہونے کے عقیدہ کا رد ۸۵

    بدھ او ر مسیح کی مشابہتیں ۷۲،۷۸،۹۰

    حضرت مسیح کے ذریعہ بدھ کے پیروکار وں کی ہدایت کے لئے دو طرح کے اسباب پیدا کئے جانا ۸۲

    بدھ مذہب کے عالموں کا بعض علامتیں لکھ کر مسیح کو بدھ اور بدھ کو مسیح قرار دینا ۷۶

    حضرت مسیح ؑ اور حضرت یونسؑ

    دونوں میں مشابہت ۱۶،۱۲۳

    یونس نبی کے مطابق معجزہ دکھانا ۱۲۵

    اگر حضرت مسیح قبر میں مردہ داخل ہوا تھا تو اس کو یونس کے قصے سے کیا مشابہت ۲۳۴

    حضرت مسیح ؑ اور یہود

    یہود ان کے جی اٹھنے کے معجزہ کو پوشیدہ رکھنا چاہتے تھے ۴۸

    یہودیوں کے حضرت مسیح پر کئے جانے والے اعتراضات ۴۲۱ح

    یہود کا آپ پر بہتان لگانا ۵۱۴

    یہود مسیح کو باغی ٹھہراتے ہیں ۲۸

    بعض یہود کا عقیدہ کہ ہم نے مسیح کو تلوار سے قتل کیا اوراس کا رد ۵۱

    مسیح کے طریق تعلیم کی وجہ سے یہود کا اعتراضات کرنا ۴۵۳ ح ح

    نصاری اوریہود کا آپ پر تہمت لگانا ۵۴

    ان کے خلاف قتل اور تکذیب کے منصوبے بنانے کا ذکر ۳۵۷

    الوہیت مسیح

    نصاریٰ کا خواہ نخواہ آپ کو خدا کا بیٹا قرار دینا ۵۷۵

    الوہیت مسیح کا ردّ ۱۶۱

    مسیح ابن مریم کی خدا ئی کے حوالے سے یورپ اور ایشیا کے پادروں کو نشان نمائی کے ایک ایک سال عرصہ کی مہلت ۱۶۰



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 695

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 695

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/695/mode/1up

    63

    وفات مسیح

    آپ کے متعلق زندہ مع جسم عنصری آسمان پر جانے کا عقیدہ اور اس کا رد ۵۷۶،۵۷۸

    قرآن کی رو سے دو آیات کی روشنی میں وفات کے دلائل ۴۵۲ح

    معراج کی حدیث کی رو سے وفات کا ثبوت ۴۸۱

    حدیث سے ثابت ہے کہ حضرت مسیح علیہ السلام ۱۲۵ برس عمر میں فوت ہو گئے ۵۴۲

    معراج کی حدیث ،حضرت عیسیٰ ؑ مردہ روحوں میں ۵۶۲

    حضرت عیسیٰ ؑ کی موت پر صحابہؓ کا اجماع ۵۴۲،۵۷۸

    جلیل کے سفر کی رو سیمسیح کے جسم کے فانی ہونے کا ثبوت ۲۶

    براہین احمدیہ میں یہ خیال لکھنا کہ خود عیسیٰ دوبارہ آئے گا مگر خدا کا متواتر وحی سے اسے فاسد عقیدہ قرار دینا ۴۸۵

    ابن حزم، معتزلہ اور امام مالک وفات مسیح کے قائل تھے ۵۸۷

    مسیح کے قول ’’جی اٹھنے ‘‘ سے مراد ۱۹،۲۰

    اناجیل سے مسیح کے آسمان پر زندہ جانے کے عقیدہ کا ردّ ۱۶

    کشمیر میں مسیح کی قبر ۱۶۹تا۱۷۰

    آپ نے ایک سو بیس سال کی عمر پائی اور سرینگر کشمیر محلہ خان یار میں قبر ہے ۱۴،۱۲۴

    حضرت عیسیٰ ؑ کی قبر کھڑکی دار ہے ۲۶

    آپکی قبر یوز آسف ،شہزادہ نبی اور عیسیٰ کی قبر کہلاتی ہے ۲۴۴

    مسیح کی وفات کے ثبوتوں کے بعد عیسائیوں اورمسلمانوں کے آپس میں محبت اور دوستی کا از سر نو ہونے کا یقین ۱۲۴

    عیسائی مذہب پر فتح پانے کابجز حضرت مسیح کی طبعی موت ثابت کرنے کے اور کوئی طریق نہیں ۱۶۹ح

    حیات مسیح کا عقیدہ

    آپ کی پہلی اور آخری زندگی کے عقیدہ کے برے اثرات ۳

    براہین احمدیہ میں یہ خیال لکھنا کہ خود عیسیٰ دوبارہ آئے گا مگر خدا کا متواتر وحی سے اسے فاسد عقیدہ قرار دینا ۴۸۵

    عیسائیوں کا اعتقاد کہ حضرت مسیح یہودہ اسکریوطی کی سازش سے گرفتار ہوکر مصلوب ہوئے اور پھر زندہ ہو کر آسمان پر چلے گئے ۱۶

    عیسائیوں کی طرح مسلمانوں کا بھی یہی عقیدہ ہے کہ حضرت مسیح واقعہ صلیب کے بعد بلا توقف آسمان پر چلے گئے ۶۳

    اس خیال کا رد کہ مسیح دنیا میں پھر آکر عزت اور بزرگی پائیں گے۵۳

    مسیح کے آسمان پر جانے میں ایک راز ۸۷

    مسیح کے جلالی جسم کے عقیدہ کی تردید ۴۹تا۵۰ح

    مرہم عیسیٰ دیکھئے مضامین میں ’’مرہم عیسیٰ‘‘

    مسیح موعود علیہ السلام نیز دیکھئے ’’مرزا غلام احمد قادیانیؑ ‘‘

    مسلمان اور عیسائی دونوں مسیح موعود کے منتظر ہیں ۱۱۶

    مسیح موعود کی وجہ تسمیہ ۷۱

    مسیح موعود کے حَکم کہلانے کی وجہ ۱۱۹

    مسیح کے حکم ہوکر آنے کی تشریح اور کیفیت ۱۴۴

    مسیح موعود کے زمانہ کی علامات اور ان کا پورا ہونا ۱۱۶

    احادیث میں بیان مسیح کے وقت کی نشانیوں کا پورا ہونا ۱۵۷

    احادیث میں مسیح کے زمانے کی سلطنت کی تعریف ۱۴۵

    مسیح کی سب سے اول درجہ کی علامت یہ ہے کہ وہ صلیب کے غلبہ کے وقت میں آئے گا ۱۵۷

    خاتم الخلفاء اور خاتم الاولیاء کے عجم سے پیدا ہونے کی پیشگوئی۴۸۳

    نجومیوں کا بول اٹھنا کہ مسیح موعود کا یہی وقت ہے ۱۵۷

    مسیح موعود کے لئے ضروری تھا کہ وہ ایلیاء کی طرح جو یوحنا نبی کے لباس میں آیا تھا مسیح ناصری کی خُو پر آتا



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 696

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 696

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/696/mode/1up

    64

    مسیح موعود حارث کہلائے گا یعنی زمیندار اور زمینداری کے خاندان سے ہو گا ۲۰۸ح

    آخری زمانہ میں مسیح موعودؑ کا آنحضرتؐ سے الزامات کو دور کرنے کے لئے ظاہر ہونا ۴۵۳ح

    خونی مسیح کے عقیدہ کا رد۶،۷،۹،۱۰،۱۴،۱۵۵،۱۵۶، ۱۵۷،۱۶۶

    خونی مسیح و خونی مہدی کے عقیدہ کا مسلمانوں اور مولویوں کی اخلاقی حالت پر بد اثر ۸،۹

    مولویوں کے نزدیک مسیح مہدی خلیفہ سے مل کر جہاد کرے گا۱۴۴

    مسلمانو ں کا زعم کہ فرضی مسیح و مہدی ظاہر ہوکر تمام کافروں کو قتل کر کے اور ان کا مال مسلمانوں کو دے گا ۱۵۹

    آنحضرت ؐ کی پیشگوئی تھی کہ مسیح موعود کے ہاتھ سے کسر صلیب ہوگی ۶۴

    چودھویں صدی کے مجدد کا نام کاسر الصلیب ہونے کی وجہ

    ۲۷،۱۶۵،۱۶۶

    مسیح موعود کے صلیب توڑنے اور خنزیروں کو قتل کرنے سے مراد

    ۸۷،۱۴۴

    مسیح موعود عیسائی خیالات کی شکست کے لئے آئے گا ۱۴۵

    چودھویں صدی کے مجدد کے مسیح موعود ہونے کا ثبوت ۱۶۶

    قیصرہ کے ملک میں مسیح موعود کے بھیجے جانے کا مقصد ۱۱۹،۱۱۸

    مسیح موعود جو دنیا میں آیا ہے قیصرہ کے وجود کی برکت اور اس نیک نیتی اور سچی ہمدردی کا ایک نتیجہ ہے ۱۱۸

    حضرت موسیٰ ؑ اور مثیل موسیٰ ؑ کی چودھویں صدی میں دو شخصوں کا مسیح موعود ہونے کا دعویٰ اور دونوں کی تکفیر ہونا ۲۹

    مسیح موعود کا دوسرا نام مہدی جس کی بادشاہت آسمانی ہوگی ۱۴۴

    مسیح موعود کا زمانہ امن اور صلحکاری کا ہوگا ۱۴۴

    مسیح موعود اور مہدی کے لئے ضروری ہے کہ آسمانی نشانوں کے ساتھ دین کو پھیلا دے ۱۴۵

    آخری مسیح بھی کلمۃ اللہ اور روح اللہ ہو گا ۴۸۴

    **

    مظفرخاں صاحب چوہدری نمبردارمیرووال ۱۸۷

    معین الدین شیخ صفی الدین

    خلت کے معنی موت کے لکھنا ۵۱۳

    مگدالیانا ۸۹

    مگدلینی ۲۵،۸۹

    ملاکی نبی ۴۶۲ح

    ملاوامل، لالہ (قادیان کا ایک آریہ)

    ۱۹۰،۱۹۵، ۲۰۰،۲۲۸،۲۲۹، ۲۵۷، ۲۷۳،۳۰۹

    حضرت اقدسؑ کی دعا کے نتیجہ میں تپ دق سے شفا پانا ۹۵

    اس کا الیس اللہ کے الہام کی مہر بنوا کر لانا ۱۹۸

    اکثر پیشگوئیوں کا گواہ ۲۰۰،۲۰۲

    مور ،ڈاکٹر

    اس کے مطابق تاتاری چوزن قوم یہودی الاصل ہے ۹۷

    حضرت موسیٰ ؑ ۱۳۹،۳۵۰،۴۲۴ح

    آپ کی نسبت توریت میں آیا ہے کہ آپ زمین کے تمام باشندوں سے زیادہ علیم اور امین ہیں ۴۲۰

    آپ پر اعتراضات کہ سخت دل اور خونی تھے اور دیانت اور امانت اور عہد کے پابند نہ تھے ۴۲۰ح

    نبی کریمؐ اور آپ کے درمیان مماثلت ۵۲۳

    آپ پر لگائے گئے بہتان ۵۱۳

    آپ سے ایک سلسلہ کا شروع ہونا ۵۲۰

    مولابخش ، ضلع جھنگ ۱۸۸



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 697

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 697

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/697/mode/1up

    65

    مولابخش ،میرووال ۱۸۹

    مولا بخش راجپوت ۱۷۸

    مونیر ولیم، سر ۸۰،۸۵

    مہابت خان

    اس کی رائے کہ عرب کے بنی اسرائیل حضرت سلیمان ؑ کی نسل سے تھے ۱۰۳

    مہادیو ۶

    ہندؤوں کے عقیدہ کا ذکر کہ مہادیو کی لٹوں سے گنگا نکلی ۳۳۱

    مہتاب الدین،میرووال ۱۸۹

    مہدی نیز دیکھئے ’’مسیح موعود‘‘

    مہدی کے متعلق مسلمانوں کا عقیدہ ۷

    امام مہدی کے زمانہ کے نشانات کا ذکر ۳۳۶

    خونی مہدی کے عقیدہ کا رد ۹،۱۰،۱۲،۱۵۵،۱۵۶،۱۵۷

    خونی مہدی کے تصور کی تائید قرآن و حدیث سے نہیں ہوتی ۴۹۲

    اہل کشف کا بیان کہ آخری مہدی خدا سے آدم کی طرح براہِ راست ہدایت پائے گا ۴۸۰

    آنحضرت ﷺ کی پیشگوئی کہ مہدی معہود کے ساتھ عیسائیوں کا مباحثہ ہو گا ، اس کا پورا ہونا ۳۶۲،۳۶۳

    مہربان علی ۱۷۸

    میاں صاحب کوٹھہ والے ۵۶۴،۵۶۵

    میردرد، خواجہ ۲۸۶

    آپ اور آپ کے خاندان کا ذکر ۲۷۳،۲۷۴

    میکسمولر ۸۵

    ن،و،ہ،ی

    نادر شاہ

    نادرشاہ جب ہند فتح کر کے واپس پشاورپہنچا تو یوسف زئی قوم کے سردار وں نے اس کی خدمت میں عبرانی بائبل پیش کی ۹۹

    ناصر نواب ،میر ۳۵۲

    نانک،بابا

    مسلمان ہونے کے دلائل ۲۴۷

    اپنی جماعت کو ہندوؤں اور ویدوں سے علیحدہ کرنا ۲۴۸

    نبی بخش ،شیخ ،کوڑی ۱۸۹

    نجف علی میاں ۲۶۳

    نجیب اللہ خالدی ۱۷۸

    نجیب علی خاں،پنشنرعمرال ۱۸۷

    نذیر حسین دہلوی ۵۵۶

    اس نے مسیح موعود ؑ کے خلاف تحریر کردہ فتویٰ تکفیر کو اپنی طرف منسوب کر کے شائع کیا ۲۹۸

    حضرت اقدسؑ نے عربی میں تفسیر لکھنے کی دعوت دی ۲۳۱

    نصرت جہاں بیگم ،سیدہ ۲۷۴

    حضرت مرزا مبارک احمد کی ولادت پر پیشگوئی کے مطابق آپ کا بیمار ہونا ۲۱۷

    آپ کے نام سے تفاؤل ۲۷۵

    نصر (گرگشت کے فرزند) ۱۰۰

    نصراللہ خان نمبردار، چوہدری ۱۷۸

    نصری (ایک افغان قبیلہ)



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 698

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 698

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/698/mode/1up

    66

    نعمت خاں،میرووال ۹۸۱

    نظام الدین ،بھیرہ ۹۸۱

    نظام الدین ،گارڈریلوے راولپنڈی ۰۸۱

    نظام الدین خان،ملازم چیف کورٹ لاہور ۰۹۱

    نظرمحمد مالگزار۔ ادرحماں ضلع شاہ پور ۷۷۱

    نواب نمبرداربدوملّی ۱۹۱

    نوح علیہ السلام ۴۰۳،۵۶۳ح

    نور احمد امرتسری حافظ ۰۰۲،۱۰۲،۸۵۲،۹۵۲

    نور احمد،حاجی، بھیرہ ۹۸۱

    نوراحمدخاں پشاوری بی اے ۵۸۱

    نوراحمد،شیخ ولدحاجی قائم الدین ۸۸۱

    نوراحمدنمبردار،کلدیوال ۰۹۱

    نور الدین ،حضرت حکیم مولوی ۳۰۲،۹۰۳،۲۳۳،۳۴۳

    اللہ کا آپ کو حضرت اقدس ؑ کے نشان کے طور پر بیٹا دینا ۲۱۲

    نورالدین محمد بن عبد الحکیم ۹۵

    نورالدین گارڈریلوے راولپنڈی ۰۸۱

    نورالٰہی ،سب ڈویژن کلرک ملٹری ورکس راولپنڈی۶۸۱

    نورحسین سابق ڈرائیورنواں محلہ ضلع جہلم ۷۸۱

    نورعالم ،چک سکندر ۷۸۱

    نورعالم ساکن جادہ ضلع جہلم ۷۸۱

    نہال چند،اروڑا ۰۹۱

    نیازبیگ مرزا،رئیس کلانور ۶۸۱

    واجد علی نبیرہ، قاضی ۸۷۱

    وزیر (سرابند کے فرزند) ۰۰۱

    وزیربخش ،رہتاس ۰۸۱

    ولی اللہ شاہ ،مدرس ایچیسن سکول لاہور ۵۸۱

    وزیر علی ،قصبہ نگینہ ضلع بجنور ۵۸۱

    وزیری (ایک افغان قبیلہ) ۰۰۱،۴۰۱

    افغانی ہندی الاصل فرقے ۵۰۱

    وکٹوریہ، ملکہ

    نیز دیکھئے مضامین میں ’’انگریزی حکومت‘‘


    اس کے عدل عام اور رعایا پروری کا ذکر ۱۱۱

    ملکہ معظمہ کی نیک نیتی کی وجہ سے اللہ کا عیسائیوں اور مسلمانوں کے اتحاد کے سامان پیدا کرنا ۴۲۱

    قیصرہ کی ہمدردی رعایااور عدل اور نیک نیتی کا ذکر ۹۱۱

    قیصرہ کے اقبال اور خوشی اور عمر میں برکت کی دعا ۹۱۱

    اس کی برکت سے مسیحؑ کا انیس سو برس کی تہمت سے پاک ہونا ۵۲۱

    حضور نے جشن صد سالہ جوبلی کی تقریب پر ایک رسالہ تحفہ قیصریہ اس کی طرف روانہ کیا ۲۱۱

    حضرت اقدسؑ کا اس کی خدمت میں خوشخبری پہنچانا ۵۱۱،۶۱۱

    اللہ کا زمینی اسباب کی طرح آسمانی اسباب کے ذریعہ اس کی مدد کرنا ۵۱۱،۶۱۱

    قیصرہ کی سلامتی عمر اقبال اور کامرانی کے لئے دعا ۶۱۱



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 699

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 699

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/699/mode/1up

    67

    قیصرہ کی نیک نیتی اور رعایا کی سچی ہمدردی قیصر روم سے بھی زیادہ ہے ۱۱۸

    وولف، ڈاکٹر

    افغانوں کے بنی اسرائیل سے ہونے کے بارہ میں رائے ۹۷

    ویر بہانا، بدوملّی ۱۹۰

    ہابل ۳۴

    ہارون علیہ السلام

    آپ پر گوسالہ پرستی کا الزام لگایا جانا ۵۱۴

    ہدایت علی ،حافظ، اکسٹر اسٹنٹ گورداسپور ۲۲۸

    ہرقل (قیصر روم)

    نجوم کے علم میں اس کو دسترس تھی ۳۷۵

    اس کو آنحضرتؐ کا دعوت اسلام کا خط لکھنا ۲۷۲

    اس کا کسی قدر حق کی طرف رجوع کرنا ۳۷۳،۳۷۵

    نبی کریمؐ کی نسبت ابوسفیان اور اس کے درمیان مکالمہ ۳۷۴

    نبی کریمؐ کے پاؤں دھونے کی خواہش کا اظہار ۳۷۵

    آتھم اور اس کے متعلق پیشگوئی شرطی تھی ۳۷۵

    ہنری مارٹن کلارک ۲۵۴،۳۵۶

    اس کی حضرت مسیح موعود ؑ پر مقدمہ قتل کی سازش ۳۴۳

    براہین میں ہنری مارٹن کلارک کے اقدام قتل کے مقدمہ کے ابتلا کا ذکر اور پیشگوئی کا پورا ہونا ۱۵۳،۳۴۱،۵۲۲ح

    اس کے سامنے آتھم کا ہاتھ اٹھا کر ندامت کا اظہار کرنا ۵۵۲

    ہوسیع نبی ۹۷

    ہیرودوس (ہیرو ڈوٹس) ۲۳،۵۳،۱۰۵

    یارانمبردار،اکبریاں،رعیہ ۱۹۱

    یار محمد کلرک ،راولپنڈی ۱۸۶

    یعقوب علیہ السلام ۹۸،۱۰۱

    یحییٰ علیہ السلام

    آنحضرتؐ کا معراج میں آپ کو حضرت عیسیٰ ؑ کے ساتھ دیکھنا ۵۴۲

    ایلیا کا ان کی خو اور طبیعت پر آنا ۴۷۶

    آپ کا انکار کرنا کہ میں حقیقی طور پر ایلیا ہوں ۴۶۳ح

    یعقوب علیہ السلام ۴۹۷

    آپ پر آنے والے ابتلا ۵۲۱ح

    یعقوب علی تراب،شیخ ۱

    یوحنا علیہ السلام

    ایلیا کے رنگ پر آنا ۵۲۰

    یوز آسف ۲۴۴

    یوسف علیہ السلام ۳۵۰

    فرعون کا آپ کو صدیق کا خطاب دینا ۵۰۳ح

    آپ کے حوالے سے آپ کے والد پر آنے والے ابتلا ۵۲۱ح

    یوسف( آرمتیا) ۲۳،۲۷،۲۹،۴۵

    پیلاطوس کا دوست، مسیح کے پوشیدہ شاگردوں میں سے تھا ۷۹

    حضرت مسیح کو ایک کوٹھے میں رکھنا ۲۴۴

    یوسف زئی (ایک افغان قبیلہ) ۹۹،۱۰۰،۱۰۶

    یوسف نجار



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 700

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 700

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/700/mode/1up

    68

    یوسیبیس (یونانی مؤرخ) ۶۸ح

    یوشع ۵۲۰

    یونس علیہ السلام ۲۱،۵۴۰،۵۵۳

    آپ کی پیشگوئی کا ذکر ۳۶۲

    یونس نبی اس خیال اور ندامت سے کہ میری پیشگوئی پوری نہیں ہوئی اپنے وطن سے چلے گئے ۵۳۵

    عذاب کو دیکھ کر قوم کا توبہ و خیرات میں مشغول ہونا ۵۳۴

    آپ کی قوم کا توبہ سے فائدہ اٹھانا اگرچہ الہام میں کوئی شرط نہ تھی ۵۵،۱۵۴

    ؑ تین دن مچھلی کے پیٹ میں رہنا ۱۶،۷۱

    یہودا ۹۶،۹۸

    یہودا سکریوطی

    عیسائیوں کا اعتقاد کہ اس کی شرارت سے مسیح گرفتار ہو کر مصلوب ہوا۱۶



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 701

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 701

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/701/mode/1up

    69

    مقامات

    آ،ا،ب

    آڈرہ متصل راولپنڈی ۱۸۲

    آسٹریلیا ۶۱۶

    اٹلی

    اس کے آثار قدیمہ کا ذکر ۱۳۹

    مختلف مذاہب کی خوبیوں کے لئے جلسہ کے انعقاد کی توقع۴۹۵

    اجمیر ۱۹۵

    اجودھیا

    اس کے آثار قدیمہ کا ذکر ۱۳۹

    احمد آباد ضلع جہلم ۱۷۹

    ادرحماں ضلع شاہ پور ۱۷۷

    ارساہ ۹۵

    ارکاٹ ۱۸۲تا۱۸۴

    اسلام پور قاضی ماجھی

    بابر کے عہد میں اس کا نام رکھا گیا اور نام بدلتے بدلتے قادیان ہونا ۱۱۹

    ناصرہ اور اسلام پور قاضی ماجھی میں مشابہت ۱۱۹

    افریقہ ۶۱۶

    حضرت مسیح موعودؑ کویہاں سے تحائف اور روپیہ کا آنا ۱۵۲

    افغانستان ۶۷،۹۴،۹۸،۴۹۹،۵۹۵،۵۹۶

    فارس کی مشرقی حد افغانستان سے متصل ہے ۶۹

    افغانستان اور کشمیر کی حد فاصل چترال کے علاقہ اور کچھ حصہ پنجاب کا ہے ۶۹

    حضرت مسیح علیہ السلام نصیبین سے افغانستان آئے ۲۴۴

    اکبریاں ۱۹۱

    الائی کوہستان ۹۴

    الٰہ آباد ۳۶۲،۵۴۵

    امرتسر ۱۷۰،۱۸۵،۱۹۰،۱۹۸،۲۰۰،۲۰۹،۲۱۱،۲۱۲،۲۲۱،۲۲۴،،۲۵۲

    ۲۵۷،۲۵۸،۲۵۹،۲۶۴،۲۹۵،۳۰۸،۳۴۳تا۳۴۷،۳۵۸،۳۶۲

    ۴۱۴،۴۴۴،۴۴۵،۵۳۹،۵۴۵،۵۹۶، ۶۱۱

    امرتسر سے حضرت اقدسؑ کا الیس اللہ کی انگوٹھی بنوانا ۱۹۸

    امرتسر کے حکیم محمد شریف کو اپنے بھائی کی وفات کی خواب بتائی۲۱۱

    امرتسر سے اپنے بھائی کو ان کی وفات کے بارے میں خط لکھا ۲۱۲

    امریکہ ۵۱۵

    انبالہ ۱۸۶،۱۸۷،۵۴۵

    انبالہ چھاؤنی ۲۹۱

    اندلس ۱۶۰ح

    انڈیا ۳۷۱

    ایبٹ آباد ۱۸۸

    ایران ۹۷،۱۰۰،۳۶۷ح

    ایشیا ۵۱۵



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 702

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 702

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/702/mode/1up

    70

    ایشیا کوچک

    یہ افغانیوں کو سلیمانی کہتے ہیں ۹۶

    بابل ۱۷ح،۱۰۵

    اس کے آثار قدیمہ کا ذکر ۱۳۹

    بامیان(افغانستان) ۹۸

    بانڈی ڈھونڈاں ضلع ایبٹ آباد ۱۸۸

    بٹالہ ۱۷۰،۱۸۵،۲۰۶،۲۰۷،۲۷۳ح،۲۹۴،۳۰۹،۳۱۱

    ۳۲۵،۳۳۰،۳۴۶،۳۴۸،۳۵۹،۵۴۵

    راجہ تیجا سنگھ کو سیالکوٹ کے دیہات کے بدلے بٹالہ کے دیہات بطور جاگیر ملے تھے ۲۵۶،۲۵۷

    سکھوں کے عہد میں ایک سید سے گائے کو ہلکی سی خراش لگنے کی وجہ سے اسے قتل کرنا چاہا ۶۰۵

    بجنور، ضلع ۱۸۵

    بخارا ۲۷۰

    یہود یہاں جلا وطن ہو کر بھیجے گئے ۹۶

    حضرت مسیح موعودؑ کویہاں سے تحائف اور روپیہ کا آنا ۱۵۲

    بدر

    بدر کے میدان میں اس امت کے فرعون کی ہلاکت ۵۲۲

    بدوملہی ۱۸۹،۱۹۰،۱۹۱

    برائے رونک آباد ضلع گجرات ۱۸۷

    برٹش انڈیا(نیز دیکھئے ہندوستان) ۱۱۴، ۴۰۸

    برطانیہ

    سرکار برطانیہ کی کامیابی کے لئے دعا ۵۹۶

    برہما ۵۹۵

    حضرت مسیح موعودؑ کویہاں سے تحائف اور روپیہ کا آنا ۱۵۲

    بریار تحصیل رعیہ ۱۸۹

    بکڑالہ ضلع جہلم ۱۸۷

    بلوچستان ۵۹۵

    بمبئی ۱۸۲،۱۸۳،۲۷۰،۵۴۵

    بمبئی پریل ۱۸۲

    بنارس ۷۷،۲۴۴،۴۳۱

    یہ بات قرین قیاس ہے کہ مسیح نے نیپال اور بنارس وغیرہ مقامات کا سفر کیا ہو پھر جموں یا راولپنڈی سے کشمیر گئے ہوں ۷۰

    بندرابن

    اس کے آثار قدیمہ کا ذکر ۱۳۹

    بندر بمبئی بھائی کہلا ۱۸۲

    بندرعباس

    یہاں سے تحائف اور روپیہ کا آنا ۱۵۲

    بوٹر

    قادیان سے دو میل کے فاصلہ پر واقع گاؤں ۶۱۶

    بہادر حسین(بٹالہ سے بفاصلہ تین کوس ایک گاؤں)

    حضرت اقدسؑ کے آباء و اجداد کی ملکیت سے انگریزی حکومت کے عہد میں لے لیا گیا ۲۷۳ح

    بھنڈی نین تحصیل رعیہ ضلع سیالکوٹ ۱۸۷

    بہلول ۱۸۱

    بھیرہ ۱۸۷،۱۸۹،۵۰۵

    بھیں ضلع جہلم



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 703

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 703

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/703/mode/1up

    71

    بیت المقدس ۶۷،۳۷۴

    پ،ت،ٹ

    پارتھیا ۹۷

    پٹھان کوٹ ۳۴۹

    پٹیالہ۱۹۷،۲۰۵،۲۹۱،۲۹۲،۲۹۵،۲۹۶،۴۱۵،۵۴۵،۵۹۶

    پرشیا

    بخت نصر کا ان علاقوں میں یہودکو آباد کرنا ۹۵

    پسرور ۱۸۹،۱۹۱

    پشاور ۲۷۰

    پنجاب ۷۱،۱۰۳، ۱۱۲، ۱۲۶، ۱۵۲،۲۱۵،۲۱۸، ۲۶۴

    ۲۷۳، ۲۸۶، ۲۹۸،۵۱۶،،۵۲۶،۵۴۵،۶۰۶،۶۲۴،۶۲۷

    انگریزوں سے قبل یہاں جہالت کا دور دورہ ۶۱۰

    مسیح پنجاب سے ہو کر کشمیر گئے ۲۴۴،۴۹۹

    افغانستان اور کشمیر کی حد فاصل چترال کے علاقہ اور کچھ حصہ پنجاب کا ہے ۶۹

    پھاٹیانوالہ ۱۹۱

    پھاگیاں ۱۹۱

    پیرس

    مختلف مذاہب کی خوبیوں کے لئے جلسہ کے انعقاد کی توقع۴۹۵

    تاتار

    یہود یہاں جلا وطن ہو کر بھیجے گئے ۹۶

    تبت ۱۷،۷۰تا۷۲،۸۲،۸۶،۸۴،۸۶،۹۰،۹۷

    کشمیر کی شرقی حد تبت سے ملحق ہے ۷۰

    تبت والوں کا اپنے لاموں میں مانے جانے والا تناسخ ۹۰،۹۱

    ترکی

    ترک حکومت کی نسبت اشتہارات میں پیشگوئیاں کرنے کی وجہ ۴۰۹،۴۱۰

    تنبو پر ۱۹۱

    تھ غلام نبی(گورداسپور) ۱۹۴،۲۹۰،۲۹۴،۲۹۶

    ٹانک بندر بمبئی ۱۸۳

    ٹرانسوال

    اس کا انگریزی حکومت سے جنگ کرنا ۶۲۲

    حضرت اقدسؑ کی ٹرانسوال کی جنگ میں زخمی ہونے والوں کے لئے چندہ کی تحریک ۶۲۴

    ٹولیڈو(سپین) ۹۷

    ج،چ،ح،خ

    جادہ ضلع جہلم ۱۸۷

    جالندھر ۱۸۷،۵۴۵

    جکر، موضع ۱۸۷

    جگراؤں ضلع لودیانہ ۱۸۵

    جلووالی ۱۹۱

    جلیل(گلیل)فلسطین ۱۹،۲۱،۲۲،۲۴،۲۵،۲۶،۴۹،۵۰،۵۸

    جموں ۵۹۶

    یہ بات قرین قیاس ہے کہ مسیح نے نیپال اور بنارس وغیرہ مقامات کا سفر کیا ہو پھر جموں یا راولپنڈی سے کشمیر چلے گئے ہوں ۷۰

    جنڈیالہ کلساں ۱۹۱

    جنوبی افریقہ ۶۲۷،۶۲۸



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 704

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 704

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/704/mode/1up

    72

    جھجر ۲۰۴

    جہلم ۱۸۰،۱۸۵،۱۸۶،۱۸۷،۲۵۹،۲۶۰،۵۴۵

    جھنگ ۵۹۶

    جیندریاست ۱۷۸

    جے پور ۱۷۸

    چترال

    افغانستان اور کشمیر کی حد فاصل چترال کے علاقہ اور کچھ حصہ پنجاب کا ہے ۶۹

    چک خواجہ ۱۸۷

    چک سکندر ۱۸۷

    چکوال ۱۷۹

    چکیاہی ۱۸۸

    چلاس ۹۴

    چنجی ۱۸۳

    چنیوٹ ۱۸۸

    چین ۹۶،۹۷،۴۸۲

    حجکہ(نزد بھیرہ) ۱۷۶

    حصار ۱۷۸

    حیدر آباد دکن ۲۷۰،۴۱۳،۴۶۷،۵۴۵

    حضرت مسیح موعود ؑ کویہاں سے تحائف اور روپیہ کا آنا ۱۵۲

    خارکو یونیورسٹی ۱۰۱

    خان یار (سرینگر)

    حضرت مسیح علیہ السلام نے صلیب کے بعد بقیہ عمر سرینگر میں گزاری اور وہیں فوت ہوئے اور وہیں آپ کی قبر ہے ۲۴۴،۴۹۹

    خانہ کعبہ ۴۷۶ح

    خوشحالہ ۱۸۷،۱۸۸

    خیروی ضلع امرتسر

    حضورعلیہ السلام عبد اللہ غزنوی سے ملے ۵۶۶ح

    خیوا

    یہود یہاں جلا وطن کر کے بھیجے گئے ۹۶

    د،ڈ،ر

    درہ خیبر ۶۸

    دمشق ۶،۴۸۹ح

    دوراہہ(پٹیالہ اور لدھیانہ کے درمیان ایک اسٹیشن) ۲۹۳

    دونا چک ۱۸۹

    دھرم کوٹ ۱۹۱

    دہلی ۱۸۱،۲۸۶،۲۷۴

    حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی شادی دہلی میں ایک سادات خاندان میں ہوئی اور خدا نے موعود لڑکا اور تین اور عطا کئے ۲۰۱،۲۷۳

    دینہ ۱۸۰،۱۸۱

    ڈلہوزی ۱۸۱

    ڈومیلی ۱۸۰

    ڈیرہ اسماعیل خان



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 705

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 705

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/705/mode/1up

    73

    ڈیرہ بابا نانک

    چولہ بابانانک اس جگہ موجود ہے ۲۴۷

    راجہ گریہا ۸۳

    راولپنڈی ۱۸۰،۱۸۱،۱۸۶،۱۸۷،۲۵۷،۳۰۶،۵۴۵

    یہ بات قرین قیاس ہے کہ مسیح نے نیپال اور بنارس وغیرہ مقامات کا سفر کیا ہوگا پھر جموں یا راولپنڈی سے کشمیر گئے ہوں ۷۰

    رعیہ ۱۸۷

    ردہ (ہندوستان کی مغربی سرحد پر ایک ویرانہ) ۱۰۵

    روم (ترکی) ۶۱۲

    رومی (ترکی)سلطنت حرمین کی محافظ اور مسلمانوں کیلئے مغتنمات میں سے ہے ۴۰۸

    رومی (ترکی)سلطنت کے خطرے کا ایک باعث ۴۰۸

    رُہتاس ضلع جہلم ۱۸۰

    س،ش،ض،ع،غ

    ساگری ۱۸۰

    سامانہ ۴۱۶،۴۱۵

    سپین ۹۷

    ستراہ ، پسرور ۱۸۹

    ستلیرنم (سنترین) ۶۰ح

    سرساوہ ضلع سہارنپور ۱۷۸

    سرہند انبالہ چھاؤنی ۱۸۶

    سری نگر ۱۴،۲۱،۲۶،۵۵،۵۴۰

    غالباً یہ شہر حضرت مسیح کے وقت میں بنایا گیا ہے ۵۵

    گلگت کے مقام پر مسیح کو صلیب پر کھینچا جانا اور سرینگر کشمیر میں ان کی قبر کا ثبوت۔دونوں مقامات میں مشابہت ۵۵

    حضرت مسیح علیہ السلام نے بقیہ عمر سرینگر میں گزاری اور وہیں فوت ہوئے ۲۴۴،۴۹۹

    سفیدوں،ریاست جیند ۱۷۸

    سمرقند ۲۷۳ح

    سونا پور قدیم ۱۸۳

    سہارنپور ضلع ۱۷۸

    سیالکوٹ ۱۸۲،۲۲۴،۲۵۶،۲۵۷،۵۴۵،۵۵۶،۵۹۶

    سید پور ۱۸۸

    سیلاپور ۱۸۳

    شام ۵،۴۱،۸۳،۹۸،۱۰۱تا۱۰۳،۲۴۵،۶۱۲،۴۸۹

    کشمیر بلاد شام سے بالکل مشابہ ہے ۷۰

    نصیبین موصل اور شام کے درمیان ایک شہر جسے انگریزی نقشوں میں نسیبس کہتے ہیں ۶۷

    شاہ آباد ضلع ہردوئی ۱۸۱،۱۸۷

    شاہ پور،ضلع ۱۷۳تا۱۷۷،۱۸۸،۴۹۹،۵۹۶

    شاہجہاں پور ۵۹۶

    شو(چین کا ایک ضلع جہاں بنی اسرائیل کا معبد تھا) ۹۶

    شئ پالیم چنجی ضلع جنوبی ارکاٹ ۱۸۳

    شیخوپورہ ۱۹۱

    عراق ۵۹۶

    عرب ۵،۹۹،۱۰۰،۱۰۲،۱۰۳،۳۶۷،۴۸۹



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 706

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 706

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/706/mode/1up

    74

    علیگڈھ ۴۶۷

    عمرال ضلع جہلم ۱۸۷

    غزنی ۵۴۳،۵۴۷

    غوث گڈھ ۱۹۷،۲۸۹

    غور (افغانستان) ۹۸،۹۵،۱۰۲

    یہ معلوم نہیں کہ کب غور کے افغان قندھار آکر آباد ہوئے۹۶

    ف،ق،ک،گ

    فارس ۶۷،۶۸،۹۷،۳۷۶ح،۴۸۹

    فارس کی مشرقی حد افغانستان سے متصل ہے ۶۹

    فدک(مدینہ کے نواح میں ایک باغ) ۳۶۴ح

    فرات ۶۸ح

    فلسطین ۸۵

    فیروز پور ۳۰۸،۳۵۸،۳۶۸

    آتھم کا فیروز پور میں آنا ۳۵۹

    قادیان

    ۱،۱۲۶،۱۵۳ح،۱۹۵،۱۹۸،۲۰۰،۲۰۱،۲۰۵تا۲۰۷،۲۰۹

    ۲۱۴،۲۲۷،۲۲۸،۲۵۴،۲۵۵،۲۵۹،۲۶۲،۲۶۳،۲۷۰،۲۷۳

    ۲۹۴،۲۹۵،۲۹۶،۳۴۳،۳۴۴،۳۴۶،۴۰۷،۴۸۶،۵۰۶،۵۱۲

    ۵۱۶،۵۲۹،۵۹۳،۵۹۴،۶۲۵تا۶۲۷

    اس کا محل وقوع ۱۱۱

    ہزار کوس سے لوگوں کا آنا ۵۴۸

    بابرکے عہد میں اسلام پور قاضی ماجھی کا نام رکھا گیا اور یہ نام بدلتے بدلتے قادیان ہونا ۱۱۹

    سکھوں کے دور میں قادیان کی بری حالت ۶۰۶

    انگریز حکومت کی ابتداء میں اذان دینے کا واقعہ ۶۰۹

    قاہرہ ۴۱۴

    قسطنطنیہ ۴۱۴،۴۱۳

    قسلمونیہ ۶۰

    قلعہ دیدار سنگھ گوجرانوالہ ۱۸۲

    قندھار ۹۶،۱۰۱

    کابل ۹۴،۱۰۱،۱۵۲،۲۷۰،۶۲۱

    کالا ڈرکہ

    ایک پہاڑ کا نام ۹۴

    کالکا ریلوے چھاؤنی انبالہ ۱۸۶

    کپور تھلہ ۵۹۶

    کریٹ(ہندوستان) ۴۱۲

    حسین کامی کا مظلومان کریت کی رقم غبن کرنا ۴۱۳

    کشمیر ۱۴،۱۷،۷۰تا۷۲،۸۶،۹۴،۹۵،۱۰۴،۱۰۷،۳۷۵

    ۴۹۸،۵۴۰،۵۹۶

    افغانستان اور کشمیر کی حد فاصل چترال کے علاقہ اور کچھ حصہ پنجاب کا ہے ۶۹

    یہ بات قرین قیاس ہے کہ مسیح نے نیپال اور بنارس وغیرہ مقامات کا سفر کیا ہوگا پھر جموں یا راولپنڈی سے کشمیر گئے ہوں ۷۰

    کشمیر کی شرقی حد تبت سے ملحق ہے ۷۰

    گلگت کے مقام پر مسیح کو صلیب پر کھینچا جانا اور سرینگر کشمیر میں ان کی قبر کا ثبوت۔دونوں مقامات میں مشابہت



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 707

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 707

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/707/mode/1up

    75

    کشمیر بلاد شام سے بالکل مشابہ ہے ۷۰

    کلدیوال ۱۹۰

    کلکتہ ۲۷۰،۵۴۵

    کنجران ۲۹۴

    کوٹ بوچہ ۱۸۹

    کوٹ رعیہ ۱۹۱

    کوٹلو مان تحصیل رعیہ ۱۹۰

    کوٹلہ ائمہ ۱۸۷

    کوٹلی تارا ، پسرور ۱۹۱

    کوٹھیالہ شیخاں گجرات ۱۸۲

    کوچہ چابک سواراں لاہور ۱۸۵

    کوڑی ۱۸۹

    کوہ ڈلہوزی ۱۸۱

    کوہ سلیمان ۴۹۹

    کوہ فیروز ۱۰۱

    کوہ نعمان ۴۹۹

    افغانستان میں ایک مقام جس کے قریب حضرت مسیح ؑ رہے ۲۴۴

    کیسمنو ۶۰ح

    گتسمینی ۳۱

    گٹامیاں ۱۹۱

    گجرات ۵۴۲،۵۹۶

    گلگت

    گلگوتہ (فلسطین) کے مقام پر مسیح کو صلیب پر کھینچا جانا اور سرینگر کشمیر میں ان کی قبر کا ثبوت۔دونوں مقامات میں مشابہت ۵۵

    سری نگر اور گلگت کی آپس میں مماثلت ۵۵

    گلگت بمعنی سری ۵۵

    گلیل (فلسطین) ۲۱،۲۲،۴۶،۲۴۴

    گنگا ۴۳۳

    گوجرانوالہ ۱۹۱،۲۰۶،۴۷۲،۵۴۵

    گورداسپورہ(ضلع) ۱،۱۱۱،۱۲۶،۱۸۵،۱۸۶،۱۹۶،۲۹۴،۳۰۹

    ۳۳۰،۳۴۵،۳۴۶،۳۴۷،۳۵۱،۴۳۱،۴۹۹،۵۲۹،۵۳۹،۵۹۶

    گولڑہ ۱۸۸

    گہوڑی ضلع مظفر آباد ۱۸۸

    گھٹیالیاں ۱۹۱

    ل،م،ن

    لاسہ(لداخ)

    اس کا مطلب ہے معبود کا شہر ۵۵

    یہ مسیح کے وقت میں آباد ہوا ۵۵

    لاہور ۱۱۱،۱۵۲،۱۵۷ح،۱۸۴،۱۸۵،۱۹۰،۱۹۸،۲۰۹،۲۲۳

    ۲۲۴،۲۲۶،۲۲۷،۲۶۴،۲۹۵،۳۰۲،۳۰۴،۳۲۷ح،۳۳۱،۳۶۸

    ۴۰۷،۴۱۴،۵۰۵، ۵۳۹ ، ۵۴۵،۵۹۶،۶۱۰،۶۱۱

    لاہور کی ایک مسجد پر سکھوں کا قبضہ ۶۰۶

    لدھیانہ ۲۰۴،۲۰۶،۲۹۱،۲۹۳،۲۹۵،۳۰۸،۳۵۸،۵۳۹،۴۹۰

    ۵۴۵،۵۹۶

    لسبیلہ، ریاست ۱۷۴

    لندن ۱۰۱

    لنگسگور



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 708

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 708

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/708/mode/1up

    76

    لوہارو (ریاست) ۲۷۴

    ماجھہ (پنجاب کے ضلع امرتسر گورداسپورہ کا علاقہ) ۱۱۹

    مالیر کوٹلہ ۵۹۶،۲۶۳

    مانسہرہ ضلع ہزارہ ۱۸۷،۱۸۸

    متھرا ۵۹۶

    مدراس ۱۸۳،۲۷۰،۴۱۳،۵۴۵،۵۹۶

    حضرت مسیح موعودؑ کویہاں سے تحائف اور روپیہ کا آنا ۱۵۲

    مدینہ منورہ ۱۰،۵۲۳

    مردان(صوبہ سرحد) ۲۵۹

    مرو

    یہود یہاں جلا وطن ہو کے بھیجے گئے ۹۶

    مصر ۷۱،۴۱۴،۵۰۳ح

    اس کے آثار قدیمہ کا ذکر ۱۳۹

    مظفر آباد ،ضلع ۱۸۸

    مکہ مکرمہ ۱۰،۱۱،۵۲۳

    مگدھ ۸۳

    مگولہ ضلع سیالکوٹ ۱۹۰

    ملتان ۵۹۶

    ایک مقدمہ کی گواہی کیلئے حضرت اقدسؑ کا ملتان جانا ۳۳۱

    موصل

    نصیبین موصل اور شام کے درمیان ایک شہر جسے انگریزی نقشوں میں نسی بس کہتے ہیں ۶۷

    میدیا

    بخت نصر کا ان علاقوں میں یہودکو آباد کرنا ۹۵

    عیسائیوں کے نقشہ کے مطابق اس کا محل وقوع ۶۹

    میرٹھ ۳۹۰،۳۹۳

    میرو وال ۱۸۷،۱۸۹

    میسور ۱۸۳

    میلوشارم شمالی ارکاٹ ۱۸۴

    نارنول ۱۷۸

    ناصرہ (فلسطین) ۱۴۲

    ناصرہ کے معنی ۱۱۹

    عبرانی میں معنی ۱۱۸

    ناصرہ اور اسلام پور قاضی ماجھی میں مشابہت ۱۱۹

    نصیبین ۷۰

    موصل اور شام کے درمیان ایک شہر جسے انگریزی نقشوں میں نسیبس کہتے ہیں ۶۷

    حضرت مسیح علیہ السلام کا یہاں آنا ۶۷،۲۴۴،۴۹۹

    نگینہ، قصبہ ۱۸۵

    نمن، موضع ۱۹۰

    نواں محلہ ضلع جہلم ۱۸۷

    نور پور ، پسرور ۱۹۱

    نور محل ضلع جالندھر ۱۸۷

    نیپال ۸۶،



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 709

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 709

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/709/mode/1up

    77

    یہ بات قرین قیاس ہے کہ مسیح نے نیپال اور بنارس وغیرہ مقامات کا سفر کیا ہو پھر جموں یا راولپنڈی سے کشمیر گئے ہوں ۷۰

    نینوا ۵۳۵

    و،ہ،ی

    وزیر آباد ۵۴۵

    ہانسی جمالی ۱۷۸

    ہرات ۶۷،۶۸،۹۵

    ہردوئی، ضلع ۱۸۷

    ہردہ ۱۸۲

    ہریانہ ۱۸۰

    ہزارہ(ضلع) ۹۴،۹۵،۱۸۷،۱۸۸

    ہسپانیہ ۶۰ح

    ہندوستان ۱،۶۹،۱۰۳،۱۰۵ ۱۰۷، ۱۵۲،۲۱۵، ۲۱۸، ۲۶۴ ۲۸۶،۲۹۸،۴۱۲،۵۲۶،۵۴۵،۵۹۶،۶۰۳،۶۳۲

    اس ملک میں آکر بنی اسرائیل کا بت پرستی اور بدھ مذہب کو اختیار کرنا ۵۳

    اکثر حصہ اس ملک کا ایسے تاریک دلوں کے ساتھ پُر ہے جن کو خبر نہیں کہ خدا بھی ہے ۴۷۱

    ہوتی (ضلع مردان۔ صوبہ سرحد) ۲۵۹

    ہوجن (ضلع سرگودھا) ۱۷۴

    ہوشیار پور ۲۹۱

    ڈپٹی کمشنر کا ایک مؤذن کو آزاد کروانا ۶۰۸

    یروشلم

    ۲۵،،۳۵،۳۶،۳۷،۴۷،۵۸،۷۹،۸۹،۱۰۲،۱۰۳،۳۷۴

    یمن ۳۷۶،۳۷۷

    یورپ ۵۱۵

    اہل یورپ میں اسلامی طبابت کی کتابوں سے سیکھنے کا رواج ۶۰

    مختلف مذاہب کی خوبیاں معلوم کرنے کی طرف توجہ ۴۹۵

    یونان ۴۱۳

    اس کے آثار قدیمہ کا ذکر ۱۳۹

    یہ لوگ اپاہج بچے کو ہلاک کر دیتے تھے ۵۹۹

    یہ چو(صدر مقام ضلع شو چین)

    یہاں بنی اسرائیل کا معبد تھا ۹۶



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 710

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 710

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/710/mode/1up

    78

    کتابیات

    آ،ا،ب

    آبزرور(Observer)اخبار ۲۲۴

    مضمون اسلامی اصول کی فلاسفی اس لائق ہے کہ انگریزی میں ترجمہ ہو کر یورپ میں شائع کیا جائے ۲۲۵

    مضمون بالا رہے گا پیشگوئی کی تصدیق کی ۱۵۱

    آریہ دھرم (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ہندوؤں کے مقابل اس کی تالیف ۲۳۲

    آئینہ کمالات اسلام(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ۱۵۱ ،۳۱۴ح، ۳۸۱، ۴۰۴، ۴۷۰

    اتمام الحجۃ(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۳۱

    اتھاکتھا ۸۳

    احیاء العلوم، امام غزالی ۶۱۱

    اخبار عام لاہور ۴۴۸

    ثناء اللہ امرتسری کا یہ مضمون شائع کرنا کہ ابھی بٹالوی کی کچھ بھی ذلت نہیں ہوئی ۴۴۵

    ازالہ اوہام (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۱۵۱

    اشارات

    اس کتاب کا یورپ میں کثرت سے مطالعہ کیا جاتا تھا ۶۰

    اشاعت السنّہ۲۶۳، ۲۸۳، ۲۸۷، ۲۹۸، ۳۲۸، ۴۲۳،۴۵۴

    اقتراب الساعہ (نواب صدیق حسن خان)

    خونی مہدی کے عقیدہ کا ذکر ۹ح

    اکسیراعظم ۵۹

    اکسیر عربی ۵۹

    الدعا والاستجابت، رسالہ (سرسید احمد خان)

    سید احمد خاں کا اس رسالہ میں دعا کی قبولیت کا انکار کرنا ۴۶۹

    الطب دارا شکوہی ۵۹

    الملل و النحل(محمد شہرستانی) ۵۸۰،۵۸۰ح،۵۸۱

    امہات المؤمنین ۱۵۷

    مسلمانوں کا اس کا رد لکھنے سے انکار کرنا اور گورنمنٹ سے صرف سزا کا مطالبہ کرنا ۱۵۸

    انجام آتھم(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ۱۵۱،۲۱۴،۲۳۱

    چوتھے لڑکے کی پیشگوئی ۲۱۵،۲۲۳

    اشتہار کہ ہم آئندہ ان لوگوں کو مخاطب نہیں کریں گے جب تک خود ان کی طرف سے تحریک نہ ہو ۳۱۴،۴۴۸

    انجیل

    بعض یونانیوں نے حضرت مسیح سے بہت بعد بنا کر ان کی طرف منسوب کردیا ۱۴۱

    کوئی عبرانی انجیل عیسائیوں کے پاس نہیں ہے ۱۴۱

    اناجیل اپنی اصلی حالت پر قائم نہیں ۴۸

    چار انجیلیں ۶۴ انجیلوں میں سے تحکم کے طور پر اختیار کی گئیں

    ۱۴۱،۲۴۰

    ہر انجیل اپنی ذات میں مجموعہ تناقضات ہے ۱۴۲



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 711

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 711

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/711/mode/1up

    79

    انجیل کا عبرانی نسخہ دنیا سے مفقود ہے ۲۴۰

    ایک پادری کا شیطان کے مسیح سے نشان مانگنے والے واقعہ میں اسے انسان کہنا ۵۶۱

    قریبا ساٹھ انجیلیں یونانی میں ہیں جو باہم متناقض ہیں ۱۴۲

    ان میں بعض جگہ مبالغہ حد سے زیادہ کیا گیا ہے ۲۰

    محققین کے نزدیک انجیل کے دو حصے ہیں ۔دینی تعلیم اور تاریخی واقعات ۲۰

    عیسائی مؤرخ مانتے ہیں کہ انجیل کی پہاڑی تعلیم اور اخلاقی تعلیم وہی ہے جس کو گوتم بدھ حضرت مسیح سے پانچ سو برس پہلے رائج کر چکا تھا ۸۱

    انجیل نویسوں نے بہت سے تاریخی واقعات کے لکھنے میں غلطی کھائی ہے ۲۰

    انجیل کی تعلیم کہ بدنظری سے کسی عورت کو مت دیکھو کے حوالہ سے تعلیم کے ناقص ہونے کا ثبوت ۱۶۳

    جس قدر مسیح نے کام کئے اگر وہ کتابوں میں لکھے جاتے تو وہ کتابیں دنیا میں نہ سما سکتیں (عیسائیوں کا دعویٰ) ۲۰

    چاروں اناجیل میں پائی جانے والی عجیب باتیں ۴۸

    ان کی پیروی میں کچھ برکت نہیں ۱۴۲

    انجیلوں میں سچے عیسائیوں کی علامت کا موجودہ عیسائیوں میں نہ ہونا ۱۴۲

    انجیلوں کا حضرت مسیح کو بدنام کرنا ۱۴۲

    لوقا

    باب ۲۶ آیت ۳،۲ اور وے یعنی عورتیں اتوار کے دن بڑے تڑکے یعنی کچھ اندھیرے سے ہی ان خوشبوؤں کو جو طیار کی تھیں لے کر قبر پر آئیں۔۔۔ ۲۶

    متی

    باب ۱۲ آیت ۴۰ : یونس تین رات دن مچھلی کے پیٹ میں رہا ۱۶

    باب ۲۶ آیت ۳۲ : میں اپنے جی اٹھنے کے بعد تم سے آگے جا کر جلیل کو جاؤں گا ۱۹

    باب ۲۷ آیت ۱۹ :تو اس راستباز سے کچھ کام نہ رکھ ۲۳

    باب ۸ آیات ۷، ۸، ۹،۱۰ : مسیح کے صلیب کے بعد زندہ رہنے کے دلائل ۵۰

    باب ۸ آیت ۱۲،۱۳: تب انہوں نے یہودیوں کے بزرگوں کے ساتھ اکٹھے ہوکر صلاح کی ۴۸

    باب ۱۰ آیت ۹،۸: سونا اور روپا اور تانبا اپنے پاس مت رکھ ۷۸

    مرقس

    باب ۱۶ آیت ۱۴: وہ قبر سے نکل کر جلیل کی مشرک پر جاتا ہوا دکھائی دیا۔۔۔ ۲۲،۲۱

    باب ۵ آیت ۴۴- ۴۲:اور جبکہ شام ہوئی اس لیے کہ تیاری کا دن تھا جو سبت سے پہلے ہوتا ۲۷

    یوحنا

    باب ۱۹ آیت ۳۴- ۳۱: پھر یہودیوں نے رسدی فرسے کہ لاشیں سبت کے دن صلیب پر نہ رہ جائیں ۔۔۔ ۲۷

    انوار الاسلام (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۱۵

    حضرت حکیم مولوی نورالدین صاحب کے ہاں بیٹے کی پیدائش کی پیشگوئی ۲۱۲

    حضرت مرزا شریف احمد صاحب کی ولادت کی پیشگوئی ۲۲۰

    انیس ہند میرٹھ(اخبار)

    لیکھرام کی پیشگوئی پر اعتراض ۳۸۹،۳۹۰

    اے ریکارڈ آف دی بدھسٹ ریلیجن ۸۵

    بائبل ۵۳۶

    جو کوئی کاٹھ پر لٹکایا گیا سو *** ہے ۱۷

    بخاری،صحیح ۶۴،۱۴۴،۵۶۸،۵۶۹،۶۱۰،



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 712

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 712

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/712/mode/1up

    80

    تمام انبیاء کے فوت ہونے کے متعلق اجماع والی حدیث ۵۷۹

    قیصر روم کو لکھا گیا خط ۳۷۲

    بدھ ازم ۷۳

    بدھ از اولڈ ہنرگ ۷۳ح

    بدھ ازم از اولڈن برگ

    اس میں بدھ کے ایک جانشین راحولتا نام کا ذکر ۸۸

    بدھ ازم از سر مونیر ولیم

    بدھ کی اخلاقی تعلیم اور عیسائیوں کی اخلاقی تعلیم میں بڑی مشابہت ہے ۸۰

    بدھ کا چھٹا مرید ’’یسا‘‘ تھا ۸۵

    براہین احمدیہ(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ۱۵۱، ۱۹۲، ۱۹۳، ۱۹۵، ۱۹۶، ۱۹۳، ۱۹۵، ۱۹۶، ۲۰۲ح، ۲۰۳ ۲۰۸، ۲۲۸، ۲۲۹، ۲۳۰، ۲۳۲، ۲۴۹، ۲۵۴، ۲۵۵، ۲۵۶ ۲۵۷، ۲۵۸، ۲۵۹، ۲۶۰، ۲۶۱، ۲۶۲، ۲۶۶، ۲۶۷، ۲۶۹ ۲۷۳ح، ۲۷۴ح، ۲۷۵، ۲۸۳، ۲۸۴، ۲۸۵، ۲۸۷، ۲۸۸ ۲۹۷، ۲۹۸، ۲۹۹

    ۳۳۴،۴۵۲،۳۵۶،۴۶۲،۴۶۴

    عیسائیوں کے خیالات کے رد میں تالیف کی ۲۳۶

    جب براھین احمدیہ کی تالیف ہوئی تو اس وقت آپ کو اس کے چھپوانے کی استطاعت نہ تھی ۲۲۸

    ایک الہام کا ذکر ۳۵۴

    قتل کے منصوبے بنانے کی پیشگوئی ۳۵۲

    برکات الدعا(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ۳۹۶،۴۰۴،۴۰۲ح،۴۷۱

    لیکھرام کی پیشگوئی کا ذکر ۳۰۹،۴۷۰

    برنباس کی انجیل

    لکھا ہے کہ مسیح مصلوب نہیں ہوا اور نہ صلیب پر جان دی ۲۱،۲۰

    یہ بغیر کسی فیصلہ کے رد کر دی گئی اور انجیلوں میں شامل نہیں کی گئی۲۱

    حضرت مسیح ؑ کو سولی دیے جانے سے انکار ۲۴۰

    بشارات

    اس کتاب کا یورپ میں کثرت سے مطالعہ کیا جاتا تھا ۶۰

    پ،ت،ٹ

    پتا کتیان(بدھ مذہب کی کتاب) ۸۳

    پکتان والی(پٹھانوں کے قوانین ملکی)

    سارے افغانی پکتان والی نامی مجموعہ قوانین ملکی کو مانتے ہیں ۱۰۵

    اس میں موسوی احکام راجپوتی رسوم سے ملے ہوئے ہیں ۱۰۵

    تاج العروس(لغت) ۱۸ح،۳۱۷

    تاریخ افغانی

    افغان بہت زیادہ حصہ تو بنی اسرائیل ہیں اور کچھ حصہ قبطی ۱۰۳

    تاریخ طبری ۱۰۱ح

    تبت تاتار مگدلمیا از ایچ ٹی پرنسب ۸۲

    تبصیر الرحمان و تیسیر المنان

    خلت کے معنی ۵۷۳

    تحفہ غزنویہ(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۵۲۹

    در جواب اشتہار عبدالحق غزنوی ۵۳۱

    تحفہ قیصریہ (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)۱۱۱،۵۰۰

    اس رسالہ کی طرف توجہ دلانے کے لیے ستارہ قیصرہ لکھنا ۱۱۲

    قیصرہ کی طرف سے اس رسالے کے جواب کا انتظار کرنا ۱۱۵

    تحفۃ المومنین بر حاشیہ مخزن الادویہ ۵۹

    تریاق القلوب تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 713

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 713

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/713/mode/1up

    81

    خناس کے وساوس کو دور کرے گی اور اس میں شفاء ہے اور سکینت عطا کرے گی ٹائیٹل

    کتاب کے مشتملات

    قصیدہ در معرفت انسان کامل مظہر حق تعالیٰ ۱۲۹

    ضمیمہ رسالہ تریاق القلوب ۱۷۲

    ضمیمہ تریاق القلوب نمبر ۲ ۔ جس میں ۲۰ اگست ۱۸۹۹ تک ظہور آنے والے نشانات کی فہرست ۱۹۲

    ضمیمہ نمبر ۳۔ حضور گورنمنٹ عالیہ میں ایک عاجزانہ درخواست ۴۸۷

    ضمیمہ نمبر ۴۔ ایک الہامی پیشگوئی کا اشتہار ۵۰۱

    ضمیمہ نمبر ۵۔ آسمانی گواہی طلب کرنے کے لئے دعا اور آسمانی فیصلہ کی درخواست ۵۰۷

    اشتہار۔ اپنی جماعت کے لئے اطلاع ۵۱۳

    اشتہار واجب الاظہار، اپنی جماعت کے لئے اور گورنمنٹ عالیہ کی توجہ کے لئے ۵۱۷

    تفسیر بیضاوی

    خلت کے معنی موت ۵۷۳

    تفسیر جمل

    خلت کے معنی موت ۵۷۳

    تفسیر صافی

    خلت کے معنی موت ۵۷۴

    تفسیر مظہری

    خلت کے معنی موت ۵۷۲

    توریت ۲۹۷،۵۶۹

    توریت اور بدھ مذہب کی تعلیمات میں مماثلت ۹۰

    توریت کے وعدہ کے موافق افغان اور کشمیری یہود کے مسلمان ہونے پر بڑے بڑے بادشاہ ہونا ۱۶۲ح

    اس کی رو سے مصلوب شخص ملعون ہوتا ہے ۱۶۹

    اس میں لکھا ہے کہ *** ہلاک ہوگا ۲۳۸

    پیدائش باب ۴۹ آیت ۱۰ میں آسف کا ذکر ۸۲

    اس میں بنی اسرائیل کے لئے وعدہ کہ اگر تم آخری نبی پر ایمان لاؤ گے تو تمہیں مصیبتوں کے بعد حکومت اور بادشاہت ملے گی چنانچہ اسلام قبول کرنے کے بعد ملی ۶۹ح

    تذکرۂ اولوالالباب ۵۸

    ٹریبیون، اخبار

    ایک منجم پیشگوئی کہ ۱۹۰۰ ء سے نئے دور شروع ہونے اور مثیل مسیح کے نزول کی پیشگوئی ۱۵۷ح

    ج،چ،ح،خ

    جامع البیان

    خلت کے معنی موت ۵۷۳

    جعفر زٹلی (اخبار)

    حضرت مسیح موعودعلیہ السلام کے خلاف بد زبانی ۳۶۲ح

    چودہویں صدی (اخبار) ۳۰۰

    ایک بزرگ کا خط ۳۰۱تا۳۰۵

    حاوی کبیر ابن ذکریا (امراض جلد) ۵۹

    حقیقت المہدی (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ۳۱۰، ۳۱۲،۳۲۵، ۳۲۶،۳۲۹، ۴۳۶،۴۳۷

    حمامۃ البشریٰ(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    دمشق کے ایک عیسائی کا اپنی کتاب میں اس کا ذکر کرنا ۴۸۹ح

    خادم ہند (اخبار)

    حضرت مسیح موعود کے خلاف جعفر زٹلی کی بد زبانی ۳۲۷ح



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 714

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 714

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/714/mode/1up

    82

    خلاصۃ الادیان وزبدۃ الادیان ۴۸۹

    د،ڈ،ذ،ر،ز

    درمنثور ۵۳۶،۵۵۰

    دوست ہند ، اخبار ۱۸۷

    دی ریسز آف افغانستان

    افغان لوگ ملک سیریا سے آئے ۹۵

    دیوان حماسہ

    بلاغت اور فصاحت میں ایک مسلم اور مقبول دیوان جو سرکاری کالجوں میں داخل ہے۔ اس کے پانچ اشعار میں عجب کے ساتھ لام کا صلہ آیا ہے ۴۲۸

    ڈان، اخبار

    ایک منجم کی پیشگوئی کہ ۱۹۰۰ ء سے نئے دور شروع ہونے اور مثیل مسیح کے نزول کی پیشگوئی ۱۵۷ح

    ڈکشنری آف جیوگرافی از اے کے جانسٹن

    کشمیریوں کی یہودیوں سے مشابہت ۱۰۴

    ذخیرہ خوارزم شاہی ۵۸

    روئداد جلسہ دعا ۵۹۳

    حضرت اقدسؑ کی تحریک پر ۲ فروری ۱۹۰۰ء کو یہ جلسہ منعقد ہوا ۵۹۴

    خطبہ جناب مسیح موعود ؑ جو بعد نماز عیدالفطر پڑھا گیا ۵۹۷

    اپنی جماعت کے لئے ایک ضروری اشتہار ۶۲۵

    خوشخبری ۶۲۵

    قصیدہ مولوی عبداللہ صاحب کشمیری ۶۲۹

    روضۃ الصفا ۶۹

    حضرت عیسیٰ کی سیاحت کا ثبوت ۶۶

    زبدۃ الطب ۵۹

    س،ش،ص،ض

    سائیکلو پیڈیا آف انڈیا

    یہود کے انبیاء کے وسط جنوب اور مشرق میں پھیلنے کا ذکر ۹۶

    سبز اشتہار (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    حضرت مصلح موعودؓ کی پیدائش کے بارے میں اشتہار ۲۱۴، ۲۱۹

    ست بچن (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    اس کتاب میں ثابت کیا کہ بابا نانک مسلمان تھے ۲۴۷

    ستارہ قیصرہ(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    وجہ تسمیہ ٹائٹل

    اس رسالہ میں قیصرہ کی برکات کا ذکر ہے ٹائٹل

    رسالہ تحفہ قیصریہ کی طرف توجہ دلانے کے لیے یہ رسالہ لکھنا۱۱۲

    تحفہ قیصریہ کا انتظار کرنا اور یاددہانی کے لیے یہ رسالہ لکھنا ۱۱۵

    خدا کے حضور دعا کہ خیرو عافیت اور خوشی کے وقت میں خدا اس خط کو قیصرہ کی خدمت میں پہنچا دے ۱۱۵

    قیصرہ ہند کے لئے اس میں دعا ۵۰۰

    سدیدی ۵۹

    سر الخلافہ (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۳۱

    سراج الملوک ۷۱

    سرمہ چشمہ آریہ (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)۱۹۸

    ہندوؤں کے مقابل اسے تالیف کرنا ۲۳۲

    سول اینڈ ملٹری گزٹ ۲۲۴

    پٹھانوں کے متعلق ایک مضمون کی اشاعت ۱۰۴

    پیشگوئی ’مضمون بالا رہے گا‘ کی تصدیق ۱۵۱



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 715

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 715

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/715/mode/1up

    83

    نیم سرکاری اخبارسمجھی جاتی ہے ۲۲۵

    سیرو سیاحت کشمیر

    ڈاکٹر برنیر کی رائے کہ کشمیری بنی اسرائیلی ہیں ۹۴

    شرح قانون ۵۸

    شرح قانون گیلانی ۵۸

    شر ح قانون قرشی ۵۹

    شفا

    اس کتاب کا یورپ میں کثرت سے مطالعہ کیا جاتا تھا ۶۰

    شفاء الاسقام ۵۸

    شفاء الامراض ۵۹

    صحاح جوہری ۱۸ح

    ضمیمہ رسالہ انجام آتھم (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)۱۵۱

    چوتھے لڑکے کی پیدائش کے متواتر الہام ۲۴۶

    ضیاء الحق(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۲۱

    ط،ع،غ،ف،ق،ک

    طب اکبر ۵۹

    طب شبری مسمٰی بلوامع شبریہ ۵۹

    طبقات ناصری

    شنبیسی خاندان کے عہد میں بنی اسرائیل نامی ایک قوم افغانستان میں آباد تھی ۹۵

    عجالہ نافعہ ۵۹

    علاج الامراض ۵۹

    عمدۃ المحتاج ۵۹

    عیسائی تاریخ یونانی ۶۸ح

    غایۃ القاضی و کفایۃ الراضی علی تفسیر البیضاوی

    خلت کے معنی موت ۵۷۳

    فتوحات الٰہیہ

    خلت کے معنی موت ۵۷۳

    قاموس ۱۸ح

    قانون بو علی سینا ۵۸،۴۹۸ح

    بوعلی سینا کی کتاب یورپ میں پڑھائی جاتی تھی ۶۰

    اس کا پرانا قلمی نسخہ حضرت اقدسؑ کے پاس موجود ہے ۶۳

    قرابادین ابن ابی صادق ۵۹

    قرابادین ابن تلمیذ ۵۹

    قرابادین رومی

    مرہم عیسیٰ کا ذکر جو مسیح کے زخموں کے لئے بنائی گئی ۵۷،۵۸

    قرابادین فارسی ۵۸

    قرابادین علوی خان ۵۹

    قرابادین یونانی ۵۹

    قرابادین معصومی ۵۹

    قسطلانی شرح بخاری

    آنحضرتؐ کی وفات پر حضرت عمرؓ کے رویہ کا ذکر ۵۸۰

    کامل الصناعۃ ۵۸

    کتاب البریۃتصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام

    اس میں مارٹن کلارک کے مقدمہ میں بریت کی پیشگوئی



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 716

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 716

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/716/mode/1up

    84

    کرامات الصادقین (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    ۲۳۱،۴۰۵

    لیکھرام کی موت کے الہام کا ذکر ۴۸۷

    اس کے ٹائیٹل پیج کے اخیر پر نمونہ دعائے مستجاب لکھ کر لیکھرام کی موت کی پیشگوئی کرنا ۴۷۰

    کشف الغطاء(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    عیسائیوں کے خیالات کے رد میں تالیف کی ۲۳۶

    کنز العمال ۴۴۹،۵۴۰،۵۶۳

    گ،ل،م

    گرنتھ

    گرنتھ کے وہ اشعار جو باوا نانک کی طرف منسوب کئے گئے ہیں وہ قرآن شریف کی تعلیم کے سراسر موافق ہے ۲۴۷

    گزیدہ جہانکشائی ۱۰۱ح

    لسان العرب(لغت)۱۸ح،۳۱۲،۳۷۹،۳۸۰،۴۵۸ح

    لگاوتی ستتا

    اس میں متیا بدھ کی پیشگوئی ہے ۸۱،۸۰

    للتا و سترا ۹۰

    لوامع شبریہ ۵۹

    مثنوی رومی ۳۰۰

    مجمع الانساب ۱۰۱ح

    مجموعہ بقائی ۵۸

    محیط ۱۸ح

    محیط فی الطب ۵۸

    مخزن الادویہ ۵۹

    مخزن سلیمانی ۵۹

    مراۃ الشفا ۵۸

    مسیح ہندوستان میں (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)

    اس کتاب کی وجہ تالیف ۳

    مجھے یقین ہے کہ عیسائی مذہب کے محقق اور دوسرے تمام سچائی کے بھوکے پیاسے اس میری کتاب سے فائدہ اٹھائیں گے ۵

    اس کتاب میں مسیح کے مصلوب نہ ہونے اور نہ آسمان پر اٹھائے جانے کے عقیدہ کا رد ۱۴

    ناظرین سے امید کہ وہ اسے غور سے پڑھیں گے ۱۵

    جو اول سے آخر تک پڑھے گا اس کے لیے ممکن نہیں کہ وہ قائل نہ ہوجائے کہ مسیح کا آسمان پر جانے کا خیال لغو اور افترا ہے ۱۴۵

    مسیح کے کشمیر میں دفن ہونے کے دلائل کا اس میں ذکر ۱۲۴

    حضرت عیسیٰٰ کے کشمیر میں آنے اور وفات کا ذکر ۱۶۸

    یہود کے دس فرقے اسلام میں داخل ہوچکے ہیں جو افغان اور کشمیری ہیں ۲۶۱ح،۱۶۲

    مسیح کے صلیب پر فوت نہ ہونے کی مکمل بحث ۲۴۰، ۲۴۴

    کتاب کے مشتملات

    دیباچہ ۳

    دس ابواب اور ایک خاتمہ پر مشتمل اور اس کی تفصیل ۱۴، ۱۵

    پہلا باب انجیلی شہادتیں ۱۶

    باب دوم قرآن اور احادیث سے شہادتیں ۵۰

    تیسرا باب طبابت کی کتابوں سے شہادتیں ۵۶

    باب چہارم تاریخی کتب سے شہادتیں ۶۶

    باب چہارم پہلی فصل۔ اسلامی کتابوں سے شہادتیں جو حضرت مسیح کی شہادت کو ثابت کرتی ہیں ۶۶



    Ruhani Khazain Volume 15. Page: 717

    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۵- انڈیکس: صفحہ 717

    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=15#page/717/mode/1up

    85

    دوسری فصل ۔ بدھ مذہب کی کتب سے شہادتیں ۷۲

    تیسری فصل۔ تاریخی کتابوں سے شہادتیں ۹۳

    مشکوٰۃ ۴۳۱

    ایک حدیث جس میں نبی کریم ؐ نے عجب کے لئے لام کا صلہ استعمال فرما یا ۴۳۰

    مطلع الانوار ۱۰۱ح

    معدن اکبر ۱۰۱ح

    الملل والنحل ۵۸۰-۵۸۱

    منہاج الدکان بدستور الاعیان فی اعمال و ترکیب النافعہ للابدان ۵۹

    مہاداگا ۸۸

    میزان الطب ۵۹

    ن،و،ی

    نائن ٹینتھ سنچری اکتوبر ۱۸۹۴ء (رسالہ)

    کئی مصنفوں نے یہ خیال پیش کیا ہے کہ مسیح پر بدھ مذہب کے اصولوں نے اثر ڈالا تھا ۸۵

    ناظم الہند (اخبار)

    اسکے ایڈیٹر کا حضور کو ایک مقدمہ کیلیے گواہ لکھوانا ۳۳۱

    نجم الہدی (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۳۱

    نور افشاں (عیسائی رسالہ)

    حضرت اقدسؑ کے بارے میں گندی تحریریں شائع کرنا ۴۹۰

    نور الحق (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۳۱

    عیسائیوں کے خیالات کے رد میں کتابیں تالیف کیں ۲۳۶

    و

    واقعات سیر و سیاحت ۱۷ح

    وید

    خدا کی طرف سے نہ ہونے اور خلاف حق عقائد کا ثبوت ۲۳۲

    وید کے رشیوں کے زندہ نہ ہونے کا ثبوت ۱۳۹

    اس کی تعلیم کہ ارواح وغیرہ خودبخود سے ہیں ۲۳۳

    انسانی اورخدائی طاقت کو ایک قرار دینا ۲۳۴

    انسانی پاکیزگی کے متعلق اس کی تعلیم ۲۳۵

    بدھؑ کا وید کا انکار کرنا ۹۱

    باوا نانک کا اپنی جماعت کو ویدوں اور ہندوؤں سے الگ کرنا ۲۴۸

    ویسٹرن اینڈ سدرن ایشیا از ای بیلفور

    یہود کے انبیاء کے وسط جنوب اور مشرق میں پھیلنے کا ذکر ۹۶

    ی

    یونہ نبی کی کتاب ۵۵۰

    ***
     

اس صفحے کو مشتہر کریں