1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

روحانی خزائن جلد 11 ۔انجام آتھم ۔ یونی کوڈ

'روحانی خزائن ۔ حضرت مسیح موعودؑ ۔ یونی کوڈ' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏اگست 1, 2017۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 251
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 251
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    ثم اعلم أیہا الشیخ الضال، والدّجال البطّال، أنّ الثمانیۃ الذین ہم
    ثمار عُودک، ووَقودُ وُقودِک، الذین أُدخِلوا فی التسعۃ المخاطبین، فمنہم
    شیخک الضال الکاذب نذیرُ المبشِّرین، ثم الدہلوی عبد *الحق
    رئیس المتصلفین، ثم عبد اللّٰہ التونکی، ثم أحمد علی السہارنفوری من المقلّدین،
    ثم سلطان المتکبّرین الذی أضاع دینہ بالکبر والتوہین، ثم الحسن
    الأمروہی الذی أقبلَ علیّ إقبالَ مَن لبِس الصفاقۃ وخلَع الصداقۃ،
    * الحاشیۃ:ھذا الرجل لا یحسب العربیۃ المبارکۃ ام الالسنۃ۔ بل ھی
    عندہ مستخرجۃ من العبریۃ۔ التی ھی لھا کالفُضلۃ۔ ویستیقن ان اثبات
    ھٰذہ الخطۃ عقدۃ مستصعبۃ الافتتاح۔ او کزندۃ مستعسرۃ الاقتداح۔ مع انا
    فزغنا من فتح ھٰذا المیدان۔ فی کتابنا منن الرّحمٰن۔ وسوف

    باز اے شیخ گمراہ ودجال بطال بدانکہ آن ہشت کہ
    میوہ ہائے شاخ تو۔ وہیزم آتش افروختہ تو ہستند آنانکہ در نُہ۹ مخاطبان داخل اند۔ پس یکے از آنہا
    شیخ گمراہ و دروغگوتست کہ نذیر حسین است کہ بشارت یافتگان رامی ترساند۔ باز عبد الحق دہلوی کہ
    رئیس لاف زنان است۔ باز عبد اللہ ٹونکی۔ باز مولوی احمد علی سہارنپوری از مقلدان
    باز مولوی سلطان الدین جیپوری ست کہ از تکبر وتوہین دین خود را ضائع کرد۔ باز محمد حسن
    امروہی کہ سوئے من ہمچو بے حیایان متوجہ شد۔ واز راستی خود را دور افگند۔
    این شخص عربی مبارک را ام الالسنہ نمی پندارد۔ بلکہ عربی
    نزدیک او از عبرانی خارج کردہ شد است۔ حالانکہ عبرانی عربی را مثل فضلہ است۔ واین شخص یقین می کند
    کہ عربی را ام الالسنہ قراردادن کارے مشکل است کہ نتواند شد۔ یا مثل سنگے است کہ ازان آتش بیرون نتواند آمد
    حال آنکہ ما از فتح این میدان فراغت یافتیم۔ واین فراغت در کتاب


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 252
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 252
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    واعتلقتْ أظفارہ بعِرضی کالذِیاب، ومِخْلبُہ بثوبی کالکلاب، ونطق بکَلِمٍ
    لا ینطق بمثلہا إلا شیطان لعین۔ وآخرہم الشیطان الأعمٰی، والغُول الأغوی،
    یقال لہ رشید الجنجوہی، وہو شقیّ کالأمروہی ومن الملعونین۔
    فہؤلاء تسعۃُ رہطٍ کفّرونا، أو سبّونا وکانوا مفسدین۔ ونذکر معہم الشیخین
    المشہورین، یعنی الشیخ إلہ بخش التونسوی، والشیخ غلام نظام الدین
    یشاع فی الدیار والبلدان۔ فیومئذ تسودّ وجوہ المنکرین۔ وانا نُصرنا فی
    افکارنا وایّدنا فی انظارنا۔ من اللّٰہ ربّ العالمین۔ ودسنا فیہ کل دَوْس۔ الذین یقولون
    انّ العربیۃ۔ ما سبق غیرہٗ بطوس۔ بل ھی کاللباس المستبذل او الوعاء
    المستعمل و کشیءٍ ھو سقط صلفۃ غیر معین۔
    وانا اثبتنا دعوانا حق الاثبات۔ وارینا الامر کالبدیھیات۔ مصیبین غیر مُسقطین۔


    وناخن ہائے ہمچو گرگان بآبروئے من آویخت۔ وپنجہ ہمچو سگان بجامہ من درآویخت۔ وسخنانے برزبان خود آو رد کہ بجز
    شیطان لعین ہیچکس بدان گونہ تکلم نکند۔ واز ہمہ آخر شیطان کو راست ودیو گمراہ۔ کہ اورا رشید احمد گنگوہی مے گویند۔
    واو ہمچو محمد حسن امروہی بدبخت است وزیر *** خدا تعالیٰ است۔
    پس این نُہ شخص اند کہ تکفیر ما کردند ودشنامہا دادند۔ واز مفسدان ہستند۔ ومابا اوشان دو مشہور شیخ را
    نیز ذکر می کنیم۔ یعنی شیخ الہ بخش تونسوی وشیخ غلام نظام الدین بریلوی
    منن الرحمن شدہ است۔ و عنقریب آن کتاب در شہر ہا شائع کردہ خواہد شد۔ پس درآن روز روئے منکران سیاہ
    خواہد گردید۔ و مادر فکر ہائے خود و نظر ہائے خود از خدا تعالیٰ تائید یافتیم۔ و ما آنانرا کہ میگویند کہ عربی
    در حسن خود بر غیر خود سبقت نبردہ است بلکہ آن مثل لباس کار آمدہ یعنی کہنہ و ظرف مستعمل یعنی
    بیکار است و مثل چیزے ردی بے سود است کہ ہیچ نفع نہ بخشد درآن کتاب بخوبی پامال کردیم۔
    و ما دعویٰ خود را چنانکہ حق ثابت کردن است تا ثابت کردیم۔ وامر مقصود رامثل بدیہیات نمودیم۔ و


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 253
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 253
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    البریلوی، وإنہما من المعرضین، فندخلہم فی الذین خاطبناہم لیکونا من
    المصدقین أو المکذبین۔ وما نقول فیہم شیءًا إلا بعد أن یُرینا اللّٰہ وہو أعلم
    بما فی صدور العالمین، بید أننا نجعلہما غرضًا لہذہ المخاطبات، وندعوہما
    للمباہلۃ أو رؤیۃ الآیۃ أو للمناضلۃ فی عربی مبین۔
    فیا حسرۃ علٰی وَہْنِ آراء علمائنا الجہلاء ! إنْ ہم إلاَّ کالعجماء ، ولا یدرون مناہج
    تحقیق الأشیاء ، وما کانوا متدبرین۔ کثرت البدعات وعمَّ البلاء ، وکلَّ طرف
    فتنۃٌ صَمّاء والعلماء السفہاء ، فارحَمْ عبادک یا أرحم الراحمین۔
    وأمّا سبب ہذا الخطأ الأزحل، فاعلم أنہم قوم رغبوا فی فُضالۃ
    المآکل، وما جاہدوا لتجدید المنہل، وما حبسوا أنفسہم علی معارک التحقیقات،
    بل رضُوا کطبائع خرقاء بالتقلیدات، وأطلقوا جُرْدَ الإمعان والإثبات، کالمتغافلین


    واین ہر دو از اعراض کنندگان ہستند۔ پس ما ایشانرا نیز ہم در آنان داخل میکنیم کہ مخاطب ماہستند تا از زمرہ مصدقان
    شوند یا از مکذبان۔ وما درحق ایشان چیزے نمی گوئیم۔ مگر آنچہ خدا تعالیٰ بر ماظاہر کند۔ واو ہرچہ درسینہ ہائے مردم است
    خوب می داند۔ مگر این است کہ ما ہر دو را ہمچو برادران اوشان نشانۂ این مخاطبات می سازیم۔ وایشانرا برائے مباہلہ یا
    برائے دیدن آیات یا برائے مقابلہ انشاء عربی می خوانیم۔
    برراہ صواب رفیتم وہیچ غلطی نکردیم۔ پس برسستی رائے علماء ماکہ درحقیقت جاہل اند حسرتہاست۔ ایشان مثل
    چارپایہ ہستند۔ وطریقہ تحقیق اشیاء را نمی دانند ومتدبر نیستند۔ بدعتہا وبلاہا بسیار شدہ اند۔ ودر ہر طرف فتنہ
    خطرناک است۔ وعلماء این سفیہان ہستند۔ پس خدایا بر بندگان خود رحم کن۔
    وسبب این خطا کہ دور از حقیقت است این است کہ این مردم درفضلہ خوردہ دیگران رغبت کردہ اند وخود
    برائے تازہ کردن چشمہ کوشش ننمودند۔ ونفسہائے خود را برمعرکہائے تحقیقات ضبط نکردند۔ بلکہ ہمچو طبیعتہائے غرق
    جہالت بہ تقلید راضی شدند۔ واسپان فکر وثبوت بہم رسانیدن را از دست خود چون لاپروایان


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 254
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 254
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    وأما الآخرون الذین سمَّوا أنفسہم مولویین، مع کونہم مِن الغاوین
    الجاہلین، فننزّہ الکتاب عن ذکرہم ولا ننجّس الصحیفۃ من کثرۃ ذکر الخبیثین
    من غیر ضرورۃ، وإنہم من الجاہلین المعلَّمین، الذین یقلّدون أکابرہم ولیسوا من
    المتدبّرین۔ فأیہا الشیخ إنی أعلم أنک رئیس ہذہ الثمانیۃ، وکمثلِ إمامٍ
    غیر مبالین۔ وإنّا إذا فَحّصنا حق الفحص الدقیق، وبلّغنا الأمر إلٰی أقصٰی مراتب
    التحقیق، فانکشف أن الألسن کلہا مأخوذۃ مِن العربیۃ، ومستخرَجۃ من
    خزائن ہذہ اللہجۃ، والآن موجودۃ کالوجوہ الممسوخۃ المغیَّرۃ الملوَّحۃ،
    وکالمجروحین المضروبین۔ وقد بُدّل نظامہا، وغُیّر موضعہا ومقامہا، وأُخرِجَت من
    جواہر منتظمۃ، وسلسلۃ ملتئمۃٍ، وتاہتْ کالمتفرّقین۔
    فکأن بعضہا الیوم علی رَباوۃٍ، وبعض آخر فی وَہْدٍ متّکِءًا علی ہَراوۃ، والبعض

    مگر آن دیگر مردمان کہ باوجود جاہل بودن نام خود مولوی نہادہ اند پس ماکتاب را از ذکر
    اوشان پاک می داریم واین رسالہ را از کثرت ذکر خبیثان نجس نخواہیم کرد وایشان آن جاہلان
    ہستند کہ در شرارتہا تعلیم دادہ شدہ اند۔ ومقلد اکابر خود ہستند واز تدبر کنندگان نیستند۔ پس اے شیخ من
    می دانم کہ تورئیس این ہشت۸ کس ہستی۔ واین گروہ باغی را مثل
    رہا کردند۔ وما چون بنظر دقیق تفحص کردیم۔ وکار راتا نہایت درجہ تحقیق رسانیدیم
    پس ظاہر شد کہ ہمہ زبانہا از عربی ماخوذ اند۔ واز خزائن این زبان خارج شدہ اند۔
    واکنون ہمچو روہائے تغیر یافتہ وسوختہ ومجروح ومضروب موجود اند۔
    ونظام آن زبان ہا مبدل کردہ شد۔ وموضع ومقام آنہارا تغیر دادہ شد۔
    واز جواہر منتظمہ وسلسلہ ہائے باہم پیوند یافتہ خارج کردہ شد۔ وہمچو تفرقہ یابان آوارہ شدند پس بعض آن
    گویا برپشتہ استادہ است۔ و بعض در زمین پست بعصا تکیہ کردہ۔ و بعض بچادر روئے


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 255
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 255
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    لتلک الفءۃ الباغیۃ، وہم لک کالتلامیذ فی الغوایۃ أو کالمسحورین۔ فَأْتِنی
    بخیلک ورَجِلک، واجمَعْ کلّ دجلک وانحَتْ أنواع الافتنان، وأْتِنی مع
    جموعک من أہل العدوان، وصُلْ علیّ کحبشیٍّ صَال علی کعبۃ الرحمٰن،
    ثم شاہِدْ قدرۃ اللّٰہ الدّیّان۔ فإن أعرضتم وحسرتم، وواریتم الوجوہ وفررتم،
    لفّعَ وجہہ برِداء ، ونُکِّرَ شخصہ کغُرماء ۔ ومنہا ألفاظ کأنہا دُفنت وبوعدت
    من الأتراب، وہِیْلَ علیہا الزوائد کہَیْلِ التراب، وإنّا نعرفہا الیوم کرجال
    تکلموا فی الأجداث، وبُعِثوا بعد ما سُمِعَ نَعْیُہم بنوازل الانبثاث، أو کإلِْفٍ
    یُفقَد، ویُسترجَع لہ بعد مناحۃ تُعقَد، فخرجت الآن کنعش المَیت، أو الغلام
    الفارّ مِن البیت، أو النسیب المہجور من الأقارب، أو الابن الغائب الہارب۔
    فمنہا لفظٌ ما رأَی انثلامَ حَبّۃٍ، وقفَل کما سافر بسلامۃٍ وصحۃ۔ ومنہا

    امام قائم شدی۔ واین مردم ترا مثل شاگردان در گمراہی ہستند یا ہمچو کسانے کہ برایشان جادو کردہ باشند۔
    پس باسواران خود وپیادگان خود نزدم بیا۔ وہمہ دجل خود را وہمہ قسم فتنہ را بتراش۔ وباجماعتہائے خود از
    اہل تجاوز نزدم بیا۔ ومثل آن حبشی برمن حملہ کن کہ بر کعبہ مکرمہ حملہ کردہ بود۔ باز قدرت خدائے جزا دہندہ
    را بہ بین۔ پس اگر شما اعراض کنید و درماندہ شوید۔ و روہا را بپوشانید وبگریزید۔
    خود را پوشیدہ۔ وہمچو قرضداران شکل خود نہفتہ۔ وبعض چنین لفظ اند کہ گویا آنہا دفن کردہ شدند۔ و از ہم زادان دور
    انداختہ شدند وبر آنہا ہمچو خاک زوائد انداختہ شدند۔ وما امروز آن الفاظ را بد انسان می شناسیم کہ کسانے شناختہ می
    شوند کہ در قبرہا گفتگو کنند وبعد زانکہ از حوادث پراگندگی خبر موت ایشان رسد باز از قبربیرون آیند۔ یا مثل دوستے کہ
    مفقود الخبر باشد وبعد انعقاد مجلس ماتم بر وانّا للہ گفتہ شود۔ پس اکنون آن لفظ ہامثل لاش میّت بیرون آمدہ اند۔ یا
    مثل آن غلام آمدہ اند کہ از خانہ گریختہ بود۔ یا مثل آن عزیز قریب النسب کہ از اقارب خود جدا شدہ بود۔ یا مثل
    آن پسر کہ گمشدہ وگریختہ بود۔ پس ازان لفظہا آن لفظ است کہ یک حبہ نقصان او


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 256
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 256
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    فتقع الحجۃ علیکم إلٰی أبد الآبدین، ویعرف الذین یلقَفون منک القول المجہول
    والہذیان المفتول، أنک کنت من الکاذبین۔ فیبکون علیک کما یُبکَی علٰی
    الخاسرین، ویسترجعون کما یُسترجَع للمصابین، فتصبح کالمخذولین۔ فناجِ
    نفسَک فی القبول أو الإعراض، مِن قبل أن تُذبح کالعِرباض، وتلحق بالملومین۔
    ما رأی أثر الاستلام، حتی بلغ إلی الاخترام، وبکتْ علیہ ورثاؤہ
    کالنوادب،بعد ما کان کأرباب المآدب، وصار کالجنائز بعد ما کان من أہل
    الجوائزوما ہذا مِن الدعاوی التی لا دلیل علیہا،
    ولا من الأمور التیلا یوجد الحق لدیہا، بل عندنا ذخیرۃ من ہذہ
    النظائر، ووجوہ شافیۃللمرتاب الحائر۔ والذین مارسوا
    اللغات وفتّشوہا، واطّلعوا علی عجائب العربیۃ وشاہدوہا، فأولئک

    پس حجت الٰہی برائے ہمیشہ برشما خواہد افتاد۔ وآنانکہ از تو قول مجہول رامی گیرند۔ و ہذیان باہم بافتہ قبول مے کنند
    خواہند دانست کہ تواز دروغگویان ہستی۔ پس بر تو چنان خواہند گریست کہ برزیان کاران می گریند۔ وانا ِ للہ خواہند گفت
    چنانکہ بر مصیبت زدگان می گویند۔ پس ہمچو مخذولان صبح خواہی کرد۔ پس دربارہ قبول یاکنارہ کردن بانفس خود مشورہ کن
    قبل ازانکہ ہمچو شتر کشتہ شوی۔ وبانان ملحق شوی کہ مورد ملامت می باشند۔
    نہشد۔ وچنانکہ سفر کردہ بود بسلامت وصحت باز آمد۔ واز آنہا لفظے است کہ اثر سودن را بدید تاآنکہ
    تابیخ کندن نوبت اور سید۔ ووارثان اومثل زنان ماتم کنندگان برو گریستند۔ بعد زانکہ ہمچو میزبانان
    بود کہ ضیافت می کنند۔ ومثل جنازہ ہاشد بعد زانکہ ازاہل بخشش بود۔ واین ازان دعویٰ ہا نیست کہ برو
    دلیلے نباشد۔ ونہ ازان امور است کہ حق نزد آن یافتہ نمی شود۔ بلکہ نزدما ازین نظیرہا ذخیرہ است
    وبرائے شک کنندہ حیران شوندہ وجوہ شافیہ موجود ہستند۔ وآنانکہ ممارست لغات کردند
    وتفتیش لغات نمودند۔ وبر عجائبات عربیہ اطلاع یافتند ومشاہدہ کردند۔ پس این مردم


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 257
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 257
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    وقد سمعتَ أن الشریطۃ الأولٰی التی أُحکِمتْ للمناضلۃ، ووجبتْ لکل من
    قام للمباحثۃ، ہو أن یأتی مناضل بکتاب من مثل ہذا الکتاب، النظم بعدّۃ
    یعلمون بعلم الیقین، ویستیقنون کعارف الحق المبین، أن العربیۃ متفرّدۃ
    فی صفاتہا، وکاملۃ فی مفرداتہا، ومعجِبۃ بحُسن مرکَّباتہا، ولا یبلغہا
    لسانٌ من ألسُن الأرضین۔ وأمّا الیونانیۃ والعبرانیۃ والہندیۃ وغیرہا، فتجد
    أکثر ألفاظہا من قبیل البَرْیِ والنحت، وشتّان ما بینہا وبین المفرد البحت۔
    وذاک یدلّ علٰی أن تلک الألسنۃ لیست من حضرۃ العزّۃ، ولا من زمان
    بدء البریّۃ، بل تشہد الفراسۃ الصحیحۃ، ویُفتی القلب والقریحۃ، أنہا
    نُحِتت عند ہجوم الضرورات، وصِیغتْ عند فقدان المفردات، وسُرقتْ
    مفرداتہا من العربیۃ بأنواع الخیانات، ففکِّرْ إن کنت من الطالبین۔

    و تو شنیدۂ کہ آن شرط کہ برائے مباحثہ پختہ کردہ شدہ است۔ وبرائے ہر مباحث واجب
    قراردادہ شدہ۔ آن این است کہ مقابلہ کنندہ کتابے مثل این کتاب بیارد۔ نظم بشمار نظم
    بعلم یقین ومعرفت کامل مے دانند۔ کہ زبان عربی درصفات خود ومفردات خود کامل
    ومتفرداست وباحسن مرکبات خود درعجیب اندازہ است۔ وہیچ زبانے از زبانہائے دنیا
    با او نمی رسد۔ مگر یونانی وعبرانی وہندی ودیگر زبانہا۔ پس تو اکثر الفاظ آنہا از قبیل تراش
    وخراش خواہی یافت۔ ودر مفرد خالص وہمچو مرکبات بسیار فرق است۔ واین امر
    دلالت می کند کہ این زبانہا از طرف خدا تعالیٰ نیستند۔ ونہ از ابتدائی پیدائش اند۔
    بلکہ فراست صحیحہ و دل سلیم گواہی می دہند کہ این زبانہا بوقت ضرورتہا تراشیدہ شدہ اند
    وبر وقت فقدان مفردات از مرکبات کارگرفتہ اند۔ ومفردات را از عربی
    بطور دزدے گرفتہ اند۔ پس فکر کن اگر طالب حق ہستی۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 258
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 258
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    النظم، والنثر بعدّۃ النثر، مع تسویۃ التوشیۃ والاختضاب۔ فإن أتیتم بکتاب
    من مثل ہذہ الرسالۃ، وفعلتم ذٰلک إلٰی شہرین لإراء ۃ الفضل و
    وہذا أمر ثبت بدلائل واضحۃ، وبراہین ساطعۃ، وعندنا ذخیرۃ
    عظیمۃ من مفردات إنکلیزیۃ، وجرمنیۃ، ولاطینیۃ، وروسیۃ، ویونانیۃ،
    وہندیۃ، وصینیۃ، وفارسیۃ، وألسُنٍ أخری من دیار بعیدۃ وقریبۃ،
    وقد أثبتنا أنہا حُرّفَت مِن کلِمٍ عربیۃٍ مطہَّرۃٍ، لو رأیتَہا لَمُلئت
    خَوفًا ورعبًا، ولأقررتَ بصدق کلامنا کالتائبین الراجعین۔
    وقلتَ سبحان الذی جعل العربیۃ أُمَّ الألسنۃ، کما جعَل مکّۃَ
    أُمَّ القریٰ، وجعل رسولنا أُمِّیًّا لہذہ الإشارۃ، وجعَلہا خاتَمَ ألسُن
    العالمین، کما جعل رسولنا خاتَمَ النبیین، وجعل

    و نثر بشمار نثر وہم چنین در رنگینی عبارت برابری را ملحوظ دارد۔ پس اگر شما
    ہمچو این کتاب بیا وردید۔ و این کار را تا دو ماہ بجا آوردید
    واین آن امرے ست کہ بدلائل واضحہ وبراہین ساطعہ ثابت شدہ است۔
    و نزد ما از مفردات انگریزی و جرمنی و لاطینی و روسی ویونانی
    و شاستری و چینی و فارسی و دیگر زبانہا ذخیرہ کلان است
    وثابت کردیم کہ آن ہمہ الفاظ ازکلمات عربیہ مطہرہ تحریف کردہ شدہ اند۔ اگر تو آن الفاظ رابہ بینی
    برتو خوف ورعب مستولی شود وبصدق کلام ما اقرار کنی ومثل تائبان ورجوع کنندگان شوی۔
    وبگوئی کہ پاک آن ذات است کہ زبان عربی را مادر زبان ہا گردانید چنانچہ مکہ را
    مادر تمام آبادی ہا کرد۔ ورسول مارا بہر ہمین اشارہ اُمی نام نہاد و زبان عربی را برائے زبانہائے
    جہانیان خاتم الالسنہ گردانید۔ چنانکہ رسول ما را خاتم الانبیاء گردانید و قرآن را


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 259
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 259
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    الجلالۃ، فأجیئکم کالمعتذرین التائبین۔ وإن لم تقدروا فعلیکم أن تقرّوا
    بأنہ آیۃ من آیات الرحمٰن، لا مِن فعل الإنسان، وما أشقّ علیکم بعد إقرارکم
    القرآن أُمَّ الکتب، وجعلہ صُحُفاً مطہَّرۃً فیہا کُتب الأولین والآخرین۔
    ثم سأل المعترض المذکور عن وجہ تسمیۃ بعض أسماء یحسبہا جامدۃ۔
    فاعلم أنہا وکذٰلک أسماء أخری لیست جامدۃ حقیقۃ، بل ہو ظن الذین ما
    تدبّروا حق التدبر، واتبعوا روایات مسموعۃ، وحَرّموا علی أنفسہم أن یتعمّقوا
    کالمحققین۔ ألا یعلمون أن اللّٰہ علّم آدمَ الأسماء لیُکمِّلہ عِلمًا وحکمۃ؟ فما
    ظنہم۔۔ أَعَلّمہ أسماءً مُہمَلۃ؟ أیعزُون إلی اللّٰہ لغوًا خالیًا عن المعنی المکنون،
    ویجعلونہ واضعَ لغوٍ؟ سبحانہ وتعالی عما یظنون! ألا یعلمون أن الغرض مِنْ
    تعلیم الأسماء کان إفادۃً، والمہمل لا یزید معرفۃ ولا بصیرۃ، ویعلم کلُّ من لہ

    پس نزد شما ہمچو عذر آورندگان توبہ کنندگان خواہم آمد۔ واگر شما برپیش کردن نظیر قادر نشوید پس برشما لازم خواہد بود
    کہ اقرار کنند کہ این نشانے از نشانہائے خدا تعالیٰ است نہ از فعل انسان۔ وبعد اقرار کردن ہیچ بارے
    ام الکتب قرار داد وآنرا صحف مطہرہ کرد۔ ودر و خلاصہ تمام کتب درج کرد۔ باز
    معترض مذکور ازوجہ تسمیہ بعض آن اسماء سوال کردہ است کہ آنہا را جامد می پندارد۔
    پس بدان کہ نہ آن اسماء ونہ دیگر اسماء بوجہ حقیقت جامد ہستند۔ بلکہ این ظن کسانے
    است کہ تدبر نکردند۔ چنانکہ حق تدبر است وروایات مسموعہ را پیروی نمودند۔ واین
    امر بر نفسہائے خود حرام گردانیدند کی ہمچو محققان تعمق بجا آرند۔ آیا نمی دانند کہ خدا تعالیٰ
    آدم علیہ السلام را اسماء بیا موخت تا اورا علم و حکمت بیا موزد۔ پس آیا گمان ایشان این
    است کہ خدا آدم را اسماء مہملہ وبے معنی بیا موخت آیا سوئے خدا لغوے را منسوب
    می کنند کہ از معنی مقصود خالی است۔ وخدا تعالیٰ را وضع کنندہ لغو قرارمی دہند۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 260
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 260
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    إلا أن تصافونی مصدِّقین۔ ذٰلک خیر الطرق وأحسن الانتظام، وفیہ أمن
    للفریقین من تکالیف السفر ومتاعب ترک المقام، وحرج آخر لا بد منہ
    حظ من الدہاء أنّ عدم عِلم الأشیَاء لا یَدل علٰی عَدم الأشیاء، وإنّا
    لا نعلم منافع کثیر من المخلوقات، معہ أنہ لا یُقال إنہا خالیۃ من النفع فی
    علم ربِّ الکائنات۔ بل الاعتلاق بمثل ہذہ الأوہام، من سیر الجہلاء
    السفہاء اللئام، فاتق اللّٰہ ولا تَعْزُ المہملات إلٰی منبع الحق والحکمۃ، فإن
    اللّٰہ ما علّم آدم إلا معانی الأسماء التی ہی مفاتیح الأسرار المخزونۃ۔
    ومن أجلی البدیہیات أن الشریعۃ الکبری الأبدیۃ والملّۃ
    المحیطۃ الکاملۃ تقتضی أن تنزل بلسان تکونُ أکمل
    الألسنۃ، وأوسع الأوعیۃ، ولا سیّما شریعۃ جاء ت

    برشما نمی نہم مگراینکہ بامن بحالت تصدیق دوستی کنید۔ این بہترین طریقہ ہا واحسن انتظام است۔ودرین
    ہر دو فریق را از تکالیف سفر و رنج ترک مقام امن است ودیگر حرجہا کہ مسافران را ضرور
    خدا تعالیٰ از ین بدگمانی ہا پاک وبلند تراست۔ آیا نمی دانند کہ غرض از تعلیم اسماء افادہ بود۔ ومہمل نہ معرفت را زیادہ می کند
    ونہ بصیرت را۔ وہر شخصے کہ اورا بہرہ از دانش است میداند کہ عدم علم شی برعدم شے دلالت نمی کنددما برمنافع بسیارے از
    مخلوقات اطلاع نمی داریم باوجود اینکہ این گفتہ نمی شود کہ درحقیقت آن اشیاء درعلم خدا تعالیٰ خالی از نفع ہستند بلکہ بمثل
    این وہم ہا آویختن سیرت جاہلان است۔ پس از خدا بترس ومہملات را سوئے آن ذات نسبت مکن کہ منبع حق وحکمت
    است۔ زیرا کہ خدا تعالیٰ آدم علیہ السلام را ہمان معانی اسماء تعلیم کرد کہ اسرار مخز ونہ را کلید بودند۔
    ونیز این امر اجلی۱ بدیہیات است کہ شریعت کبریٰ ابدیہ کہ شریعت اسلام است
    تقاضا می کنید کہ در زبانے نازل شود کہ اکمل الالسنہ باشد
    و ظرف او از ہمہ ظرفہا وسیع تر باشد۔ خصوصاً آن شریعت کہ چنین


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 261
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 261
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    للمسافرین۔ ثم إن اتفق بعدہ أنکم ظننتم لی الظنون، وزعمتم أنہ ألّفہ الشامیون،
    أو أعان علیہ قوم آخرون، فأقبَلُ أن تناضلونی بالمشافہۃ، بعد أن تقرّوا بأنکم
    بکتاب فیہ إعجاز البلاغۃ والفصاحۃ، وہو یطلب عبارات من مثلہ من جمیع
    الألسن وکافّۃ البریّۃ۔ فأنت تعلم أن ہذا الإعجاز تحتاج إلی کمال اللسان،
    ویقتضی أن یکون ظرفہا وَسِیعًا کمثل قُوی الإنسان۔ فإن اللسان کوِعاءٍ
    لمتاع البیان، وکصدف لدُرر العرفان۔ فلو فرضنا أن لسانًا أخری أکملُ من
    العربیۃ، فلزِمنا أن نُقرّ أنہا أسبق منہا فی میادین البلاغۃ، وأنسب
    لحسن أداء المعارف الدینیۃ، فکأن اللّٰہ أخطأ فی ترکہ إیّاہ،
    وإنزالہ القرآن فی ہذہ اللَّہجۃ الناقصۃ۔ فتُبْ أیہا المسکین
    ولا تتبع أہواء النفس الأمّارۃ، واتّقِ غشاوۃَ الجہل والعصبیّۃ،

    پیش می آیند۔ باز اگر این امر پیش آمد کہ شمارا برمن بدگمانی ہا پیداشد و گمان کنید کہ این کتاب را شامیان تالیف کردہ اند
    یا قومے دیگر بران مدد کردہ است۔ پس قبول خواہم کرد کہ بالمواجہ بامن معارضہ کنید۔ بعد زین
    کتابے آرد کہ از روئے بلاغت وفصاحت معجزہ ہست۔ واز ہمہ زبانہا نظیر بلاغت می جوید۔
    پس تو میدانی کہ این اعجاز بسوئے کمال آن زبان محتاج است کہ در واین کتاب نازل شد۔ ومی خواہد کہ
    ظرف آن زبان چنان وسیع باشد کہ ظرف قوتہائے انسان وسیع است چرا کہ زبان برائے متاع بیان
    مثل آوندی است۔ یا ہمچو صدف است برائے در ہائے معرفت۔ پس اگر این فرض کنیم کہ زبانے دیگر
    از عربی اکمل است۔ پس مارا لازم خواہد بود کہ اقرار کنیم کہ آن زبان درمیدانہائے بلاغت از عربی
    سبقت ہا دارد۔ وبرائے ادائے معارف دینیہ انسب واولیٰ ہمان زبان است۔ پس گویا خدا تعالیٰ خطا
    کرد کہ آن افضل زبان را ترک نمود۔ ودر عربی کہ ازان فرو تراست قرآن شریف را نازل فرمود۔ پس
    اے مسکین توبہ کن۔ وہواء نفس ا مّار را پیرو مباش۔ و از پردہ جہل وتعصب کنارہ کن


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 262
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 262
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    عجزتم من نوع تلک المقابلۃ، ولکم أن تقولوا إنّ ہذا إنشاء الشامییّن ولا قِبَل لنا
    ولا ترفع رأسک کالمجترئین۔وأمّا قولک أن لفظ التحت والتراب والمِیزاب أسماء
    جامدۃ لا یثبتُ اشتقاقہا من الکتاب، فہذا خطأ منک ومن أمثالک، وفسادٌ نشَأ من درایتکم
    الناقصۃ، لا من قصور شأن العربیۃ المبارکۃ الکاملۃ۔ أیہا المسکین! إن لفظ التحت کان فی
    الأصل طِیَّۃ، ومعناہ ما کان تحت القدم وحاذَی الفوقَ جہۃً، ثم بُدّل الطاء بالتاء والیاء بالحاء
    بکثرۃ الاستعمال، ونظائرہ کثیرۃ، وشہد علیہ کثیر من الرجال ولو کنت من الغافلین۔ ثم
    لیس لفظ التحت جامدًا کما ہو زعمک من الجہالۃ، بل تصریفہ موجود فی کتب القوم
    وأہل ہذہ الصناعۃ۔ وفی الحدیث: لا تقوم الساعۃ حتی تظہر التُحوت۔ أی قوم أراذل لا
    یَؤبَہُ لَہُم یکون لہم الحکم والجبروت، ویکونون من المکرمین۔ وأما التُراب فاعلم أن ہٰذا
    اللفظ مأخوذ من لفظ التِرْب، وتِرْبُ الشیء : الذی خُلق مع ذٰلک


    اقرار کہ از مثل این مقابلہ عاجز آمدہ اید۔ وشمارا اجازت است کہ بگوئید کہ این تالیف شامیان است۔ وماباشامیان
    وہمچو بیباکان سرخود بلند مکن۔ مگر این قول تو کہ لفظ تحت وتراب ومیزاب الفاظ جامد ہستند کہ اشتقاق آنہا
    بکتاب ثابت نمی شود۔ پس این خطاء تو وامثال تست واین فسادے است کہ از قصور درائت ناقصہ شما پیدا
    شدہ است۔ نہ قصور عربی کہ مبارک وکامل است۔ اے مسکین لفظ تحت دراصل طیتہ بود۔
    ومعنی او ہرچہ زیر قدم باشد۔ وفوق رامحاذی افتادہ باشد۔ باز طاء را بہ تاء بدل کردہ شد۔ ویاء را بہ حاء از
    کثرت استعمال۔ ونظیر ہائے این بسیار اند وبران گواہی مردان این لغت است اگرچہ تو از غافلان
    باشی۔ باز لفظ تحت جامد نیست چنانچکہ از نادانی زعم تست۔ بلکہ درکتاب ہائے قوم واہل این صناعت
    تصریف آن موجود است۔ ودرحدیث است کہ قیامت برپا نخواہد شد تاوقتیکہ تحوت پیدا نشوند۔ اے
    کسانیکہ حقیر بودند۔ ومردم ایشانرا چیزے نمی دانستند۔ حکومت ومرتبہ ایشانرا مسلم خواہد شد مگر تراب پس
    بدان کہ این لفظ از لفظ ترب ماخوذ است۔ وترب شی نزد عرب چیزے ست کہ ہمراہ آن چیز پیدا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 263
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 263
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    بالشامیین، أو تقولوا إن ہذا مِن علماء آخرین، ولا طاقۃ لنا بہم إنہم مِن الأدباء
    الشیء عند أہل العرب۔ وقال ثعلب: تِرْبُ الشیء : مثلُہ وما شابَہَ شیءًا فی الحسن
    والبہاء ۔ فعلٰی ہٰذین المعنیین سُمِّیَ التراب ترابًا لکونہا فی خَلقہا تِرْبَ السماء ، فإن
    الأرض خُلِقت مع السماء فی ابتداء الزمان، وتشابہَا فی أنواع صُنع اللّٰہ المنّان۔ وکذٰلک
    خلَق اللّٰہ سبع سماوات منوّرۃ من الشمس والقمر والنجوم، وخلق کمثلہن سبعَ أرضین
    منوّرۃ من الرسل والأنبیاء وورثاۂم من أہل العلوم۔ ولعل لفظ ’’سبع أرضین‘‘ کان إشارۃ إلٰی
    عِدّۃ الأقالیم، واللّٰہ أعلم بما أراد مِن ہذا التقسیم، وہو یعلم ما فی العالمین۔ وقال ’’ابن بُزُرج‘‘:
    کل ما یصلح فہو متروب بعد الإصلاحات، فالأرض تراب لما أصلحہا اللّٰہ بالعمارات
    والفلاحات۔ فخُذْ من ہٰذین المعنیین ما ہو عندک محبوب، واترُکْ سیر المستعجلین۔ وأمّا
    لفظ المِیْزاب، فلو فکّرتَ فیہ کأولی الألباب لکنتَ من المتندّمین۔ أیہا المحروم


    مقابلہ نتوانیم کرد۔ یا این بگوئید کہ این تالیف دیگر مولویان است وما طاقت مقابلہ اوشان نداریم زیرا کہ اوشان
    شود۔ وثعلب گفتہ کہ ترب چیزے آن چیزے باشد کہ بخوبی خود با و مشابہت دارد۔ پس برین معنی
    زمین ترب آسمان است۔ چرا کہ زمین در ابتداء زمانہ ہمراہ آسمانہا پیدا کردہ شدہ۔ ودر انواع صنع
    خدا تعالیٰ باہم مشابہت می دارند۔ وہم چنین خدا تعالیٰ ہفت۷ آسمان پیدا کرد وآن ہر ہفت را بآفتاب
    وماہ وستارہ ہا روشن کرد۔ ومثل آسمانہا ہفت زمین پیدا نمود۔ ودرو پیغمبران و وارثان پیغمبران بیا
    فرید۔ وشاید از لفظ ہفت زمین اشارہ سوئے ہفت اقلیم باشد۔ وخدا خوب می داند کہ ازین تقسیم مراد
    چیست۔ وخدا تعالیٰ ہرچہ درجہانیان است میداند۔ وابن بزرج فرمودہ است کہ ہر چیز کہ اصلاح
    کردہ شود آنرا متروب گویند۔ پس زمین تراب است چرا کہ خدا تعالیٰ برائے آبادیہا وکشا ورزی
    ہااصلاح آن فرمودہ است۔ پس ازین ہر دومعنے ہر معنی کہ تراپسند افتد اختیار کن وسیرتہائے شتابکارانرا
    ترک فرما۔ مگر لفظ میزاب پس اگر در وہمچو دانشمندان فکر کنی۔ البتہ شرمندہ شوی۔ اے آنکہ از خوانہائے


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 264
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 264
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ


    الکاملین، أو تقولوا إنہ من المولوی الحکیم نور الدین، فما لنا أن نناضل
    بہٰذا الفاضل الأجلّ، إنّا من الجاہلین الأمیین۔ وإنی بعدہ سأجید قِبَلاً مُشافِہًا،
    من موائد الأدب! اعلم أن ہذا اللفظ مشتقّ من لفظ الأَزْب، یُقال أزَب الماء : أی جرَی۔
    فارجِعْ یا خادِع النَّوکَی إلی ’’لسان العرب‘‘ أو کتب أخری، ولا تُہلِکْ نفسک فی غیابۃ
    جُبِّ الجاہلین۔ وإنی ترکت بعض ألفاظک المعروضۃ خوفا من الإطناب لا من
    الاستصعاب، بل ہی أظہَرُ اشتقاقًا عند أولی الألباب، ففکِّرْ کطلاب الحق والصواب، وما
    أظن أن تفکّر کالعاقلین۔ فسلام علیکم لا نبتغی الجاہلین۔ ألستَ ہو الرجل الذی قرأ عند
    ذکر بحث التوفی ’’تُوَفِّی ما ضمنتَ‘‘ استشہادًا، وما علِم فَرْقَ التفعّل والتفعیل غباوۃً وعنادًا؟
    فہذا علمکم وفہمکم وفضلکم، ثم بہٰذا العقل کبرکم وزہوکم وبخلکم وتکفیرکم
    وتحقیرکم۔ فنعوذ باللّٰہ الحفیظ المُعین، مِن شرّ الخائنین الجاہلین المفترین۔ منہ

    ازادیبان کامل ہستند۔ یا بگوئید کہ این تالیف مولوی حکیم نور الدین صاحب است۔ پس ما طاقت نداریم کہ باین
    فاضل بزرگ مقابلہ کنیم چرا کہ ما از جاہلان وامیان ہستیم۔ ومن بعد این اقرار عنقریب روبروئے شما فی البدیہہ
    ادب محرومی۔ بدانکہ این لفظ از لفظ ازب مشتق است۔ اہل عرب می گویند ازب الماء یعنی جاری شد
    آب۔ پس برائے تسکین خود اے فریب دہندہ احمقان لسان العرب یادیگر کتب را بہ بین۔ ونفس خود را
    در تگ چاہ جاہلان ہلاک مکن۔ ومن بعض الفاظ کہ تو پیش کردی از خوف طول کلام ترک کردم نہ ازوجہ
    مشکلے۔ بلکہ آن الفاظ نزد خردمدان بیّن الاشتقاق اند۔ وہمچو طالبان حق وصواب فکر کن۔ و گمان نمی کنم کہ
    تو ہمچو عقلمندان فکر کنی۔ پس سلام برشماما با جاہلان مکالمہ نمی خواہیم۔ آیا تو ہمان نیستی کہ بروقت ذکر بحث
    توفیّ شعر توفیّ ماضمنت برشہادت دعویٰ خود خواندہ بود۔ واین ندانست کہ آن تفعل واین تفعیل است۔
    بہ سبب غباوت وعناد کہ داشت۔ پس این علم وفہم شماست وفضل شما۔ باز بدین عقل کبر وناز وبخل وتکفیر وتحقیر
    است۔ پس ما پناہ خدائے نگہدارندہ مدد کنندہ از شرخائنان وجاہلان ومفتریان می گیریم۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 265
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 265
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/265/mode/1up


    وأحسب ہذا الأمر تافہًا، فتعرفوننی بعد حین۔ إن الذین یکونون للّٰہ فیکون اللّٰہ لہم۔ ألا إن
    أولیاء اللّٰہ ہم الغالبون فی مآل الأمر علی المخالفین۔ کتب اللّٰہ لأغلبنّ أنا ورسلی، إن اللّٰہ
    لایُخزی عبادہ المأمورین۔
    ہذا شرط بینی وبینکم، فسنّوا أنفسکم۔ ثم أنتم تعلمون أن فضیلۃالعلماء باللسان
    العربیۃ، وہی المفتاح لفتح أسرار العلوم الدینیۃ، وہی مدار فہم معارف الفرقانیۃ، والذی لیس من
    نحاریر الأدباء ، ولا کمثل نوابغ الشعراء ،فلا یمکن أن یکون من فحول الفقہاء ، والراسخین فی
    الشریعۃ الغراء ، أو من العارفین الفقراء ، بل ہو کالأنعام، وأحد من العوام والجاہلین۔
    وأما الرجل الذی یقدر علی کلام غَضٍّ طَرِیٍّ فی ہذہ اللہجۃ، ویسلک عند نطقہ مسالک الفصاحۃ والبلاغۃ، ویعلم فروق
    المفردات وخواص التألیفات وکوائف الجُمل المرکّبۃ، فہو الذی جعلہ اللّٰہ رحیب الباع، خصیب الرِباع، فی ہذہ الخزائن
    العلمیۃ۔ ومن ادعی أنہ من الواصلین والفقراء العرفاء ، ولیس من عارفی ہذہ اللسان کالأدباء ، ففَقْرُہ لیس فقر سید الکونَین، بل ہو
    سواد الوجہ فی الدارَین۔ ولا تعجَبْ بہذا البیان، ولا تغضب قبل العرفان، فإن الذی یدّعی محبّۃ الفرقان، کیف یصدَأ ذہنہ فی
    ہذہ اللسان، وکیف تقاصَرَ مع دعاوی المحبۃ وشوق الجَنان، وکیف یمکن أن لا یتجلی لقلبہ لطف الرحمٰن، ولا یعلّمہ اللّٰہُ لسانَ نبیّہ


    سخنان بلاغت خواہم گفت۔ واین امر را چیزے اندک می شمارم۔ پس تاوقت قلیل مرا خواہید شناخت۔ آنانکہ برائے خدا می شوند خدا برائے اوشان می شود۔ خبردار
    باشید کہ اولیاء خدا را خاصہ است کہ درانجام کار ہمان گروہ غالب می شوند۔ خدا از قدیم نوشتہ است کہ من وفرستادگان من غالب شوندگان ہستند۔ خدا تعالیٰ
    بندگان مامور خود را رسوا نمی کند۔
    این شرط در من و شماست۔ پس نفسہائے خود را بلند کنید۔ باز شمامی دایند کہ فضیلت علماء بزبان عربی است۔
    وہمین زبان برائے کشودن راز ہائے علوم دینیہ کلید است۔ وہمین زبان فہم معارف قرآنیہ را مدار است۔ وآنکہ از
    ماہران علم ادب نیست ونہ مانند شاعران نابغہ پس اورا ممکن نیست کہ از فقہاء نرباشد ودرشریعت رسوخ داشتہ باشد
    یا از جملہ فقراء عارف باشد بلکہ او مثل چارپایان ویکے از عوام است۔
    مگر آن مردے کہ بر کلام تازہ وتر درین زبان قادر است۔ و در وقت نطق بر راہ ہائے فصاحت وبلاغت می رود۔ وفرقہائے مفردات وکیفیت جملہ ہائے
    مرکبہ خوب می داند واز خواص تالیف کلمات بخوبی آگاہ است۔ اوآن شخصے است کہ خدا تعالیٰ اورا درین خزینہ ہائے علمی فراخ دست وبسیار مالدا ر گردانیدہ
    وہر کہ دعویٰ کرد کہ او از واصلان وفقراء عارفین است۔ وحالانکہ از شناسندگان این زبان نیست پس فقر او فقر سید الکونین صلی اللہ علیہ وسلم نیست بلکہ آن
    سیارہ روئے در ہر دو جہان است وبرین بیان ہیچ تعجب مکن۔ وقبل از شناختن غضب مکن۔ چرا کہ شخصے کہ دعویٰ محبت فرقان می کند چگونہ ذہن او درین زبان
    زنگ خوردہ تواند شد وباوجود دعویٰ محبت و شوق دل چگونہ در تحصیل این زبان کوتاہی تواند کرد۔ وچگونہ ممکن است کہ لطف رحمن دل او را روشن نہ کند۔ وزبان پیغمبر خود



    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 266
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 266
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/266/mode/1up
    266
    بالامتنان۔ ثم إنہا معیَار لحُبّ الرسول والفرقان، فإن الذی أحبَّ العربیۃ فبحُبِّ الرسولؐ والفرقان أحبَّہا، ومن أبغضَہا فببُغض الرسولؐ والفرقان أبغضَہا، فإن المحبین یُعرَفون بالعلامات، وأدنٰی درجۃ الحبّ أن تَحُثَّک للمضاہاۃ، حتی تؤثِر طرق المحبوب وتجعلہا من المحبوبات، ومن لم یعرف ہذا الذوق فإنہ من الکافرین فی مشرب العاشقین۔ ومَن أحبَّ الفرقان وسیدنا خاتم الأنبیاء ، کما ہو شرط المحبۃ والوفاء ، فما أظن أن یبقی فی العربیۃ کالجہلاء ، بل یقودہ حبُّہ إلی أعلٰی مراتب الکمال، ویسبق کلَّ سابق فی المقال، ویصیر نطقہ کالدرۃ البیضاء ، ویُضمَّخ کلامہ بطِیب عجیب ویُودَع أنواعَ الصفاء ، ففکِّرْ کالمحبّین۔ ولولا الحب لما أُعطیتُہا، فمن الحب لقِیتُہا، فہذا آیۃُ حُبّی من أرحم الراحمین۔ والحمد للّٰہ علی ما أعطی وہو خیر المنعمین۔

    از راہ انعام اورا نیا موزد۔ باز این زبان معیار محبت رسول وفرقان است۔ چرا کہ آن شخص کہ عربی را دوست داشت پس بوجہ محبت رسول وفرقان دوست داشت۔ وآنکہ باعربی بغض داشت پس بوجہ بغض او بارسول وفرقان بغض داشت۔ چرا کہ محبان بعلامتہا شناختہ می شوند۔ وادنیٰ درجہ محبت این است کہ ترا بر مشابہت آمادہ کند۔ تا بحدیکہ راہ ہائے محبوب ترا محبوب شوند۔ وہر کہ این ذوق رانشناسد پس او در مشرب عاشقان از کافران است۔ وہرکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم را وقرآن شریف را دوست دارد۔ چنانکہ شرط دوستی ووفاداری است۔ پس گمان نمی کنم کہ درعربی مثل جاہل بماند بلکہ محبت او اورابسوئے بلند ترین مرتبہ کمال خواہد کشید۔ ودرسخن ہر سبقت کنندہ را سبقت خواہد کرد۔ ونطق او مثل در تابان خواہد شد۔ وکلام اوبخوشبوئے عجیب معطر کردہ خواہد شد وانواع صفائی دادہ خواہد شد۔ پس ہمچو دوست دارندگان فکرکن واگر محبت نبودے من علم این زبان حاصل نکردے۔ پس محبت بود کہ مرا دیدار این کنانید۔ پس از خدا تعالیٰ این نشان محبت من است پس شکر خدائے کہ مرا این زبان عطا کرد و او از ہمہ منعمان بہتر است۔
    عِلمی مِنَ الرحمٰن ذی الآلاءِ

    علم من از خدا تعالیٰ است کہ خداوند نعمت ہاست

    کَیفَ الوصُول إلٰی مَدارجِ شکرہِ

    چگونہ تامدارج شکر او توانیم رسید

    اللّٰہ مَولانا وکَافلُ أمرنا

    خدا مولائے ما متکفل امرما ست

    لولا عنایتہ بزمنِ تطَلُّبی

    اگر عنایت او در زمانہ پیاپی جستن من نبودے

    بشری لنا إنا وجدْنا مؤنسًا
    مارا خوشخبری باد کہ مامونسے یافتیم

    أُعطیتُ مِن إِلْفٍ معارفَ لُبَّہَا

    از دوستے من معارف دادہ شدہ ام
    باللّٰہ حُزْتُ الفضلَ لا بِدَہَاءِ

    وبذریعہ خدا فضیلت را جمع کردم نہ بذریعہ عقل

    نثنی عَلَیہ ولَیْس حولُ ثناءِ

    تعریف او می کنیم و نتوانیم کرد

    فی ہذہ الدّنیا وبَعْد فناءِ

    چہ درین دنیا و چہ در آخرت

    کادت تُعفِّینی سیولُ بکائی

    نزدیک بود کہ سیل ہائے گریہ مرا نابود کردندے

    ربًّا رحیمًا کاشِفَ الغَمّاءِ

    کہ رب رحیم دور کنندہ غمہاس أُنزلتُ مِن حِبٍّ بدار ضیاءِ

    و از محبوبے درجائے روشنی فرود آمدہ ام


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 267
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 267
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/267/mode/1up
    267
    نتلو ضیَاءَ الحقّ عند وضوحہِ

    لَسْنا بمبتاع الدجی بِبَراءِ
    ما روشنی حق را بعد ظہور او پیروی مے کنیم

    و تاریکی را بعد طلوع ماہ نتوانیم خرید
    نفسی نَأَتْ عن کل ما ہو مظلمٌ

    فأنختُ عند منوِّری وَجْنائی
    نفس من از ہمہ تاریکی ہا دورشد

    وناقہ خود را برآستانہ آنکس خوابانیدم کہ روشنی بخشندہ من است
    غلبَتْ علی نفسی محبّۃُ وجہہِ

    حتی رَمَیتُ النفسَ بالإلغاءِ
    برنفس من محبت او غالب شد

    تاآنکہ نفس را از میان افگندم
    لمّا رأیتُ النفسَ سدّتْ مُہْجَتی

    ألقیتُہا کالمَیْتِ فی البَیْداءِ
    چون دیدم کہ نفس من سد راہ من است

    پس او را ہمچو مردہ در بیابانے انداختم
    اللّٰہ کہفُ الأرض والخضراءِ

    ربٌّ رحیم ملجأُ الأشیاءِ
    خدا پناہ زمین و آسمان است

    خدائے رحیم جائے پناہ چیزہا
    بَرٌّ عَطوفٌ مأمَنُ الغرماءِ

    ذو رحمۃٍ و تبرُّعٍ وَ عَطاءِ
    نیکی کنندہ مہربان جائے امن مصیبت زدگان

    صاحب رحمت واحسان وبخشش
    أحدٌ قدیم قائم بوجودہِ

    لَم یتخذْ وَلَدًا ولا الشرکاءِ
    یکے است وقدیم است وقائم بالذات است

    نہ پسرے گرفت و نہ شریکے دارد
    ولہ التفرّد فی المحَامد کلہا

    ولہ علاء فوق کلّ علاءِ
    واو را در تمام صفات یگانگی است

    واورا بلندی برہر بلندی است
    العَاقلون بعَالَمین یَرونہُ

    وَالعَارفونَ بہ رأوا أشیاءِ
    عقلمندان بذریعہ مصنوعات او را می بینند

    وعارفان بذریعہ او مصنوعات را مشاہدہ می نمایند
    ہذا ہو المعبود حقًّا لِلْوَرٰی

    فَردٌ وَحیْد مَبدء الأضواءِ
    ہمین معبود حق برائے مخلوقات است

    فردست یگانہ و ابتدائے ہمہ نورہا ازوست
    ہذا ہو الحِبُّ الذی آثرتُہُ

    ربُّ الوری عین الہدی مولائی
    این ہمان محبوب است کہ اورا اختیار کردہ ام

    رب مخلوقات چشمہ ہدایت مولائے من
    ہاجتْ غمامۃُ حُبّہ فکأنّہا

    رکبٌ علٰی عُسْبُورۃِ الحَدْواءِ
    ابرمحبت او برانگیخت پس گویا آن ابر

    بر ناقہ باد شمال سواران ہستند
    ندعوہ فی وقت الکروب تضرّعًا

    نرضی بہ فی شدّۃ و رخاءِ
    در وقت بیقراری ہا ما اورا مے خوانیم

    ودر نرمی و سختی با او خوشنود ہستیم
    حَوجاءُ أُ لْفتہ أثارت حُرّتی

    ففدَی جَنانی صولۃَ الحَوجاءُ
    بادگرد الفت او خاص مرا پرانید

    پس دل من برحملہ آن بادگرد قربان شد
    أعطی فما بقیَتْ أمانی بَعْدہُ

    غمَرتْ أیادی الفیض وجہَ رجائی
    مرا چندان داد کہ آرزوئے دیگر نماند

    ودست ہائے فیض او روئے امید مرا بپوشید
    إنّا غُمِسنا مِن عنایۃ ربّنا

    فی النور بَعْد تمزُّق الأہواءِ
    ما از عنایت رب خود

    در نور غوطہ دادہ شدیم و ہوا و ہوس پارہ پارہ شد


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 268
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 268
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/268/mode/1up
    268

    إنّ المحبّۃ خُمِّرتْ فی مُہْجتی

    وأری الودادَ یلُوح فی أہبائی
    محبت در جان من خمیر کردہ شد

    ومی بینم کہ دوستی در دل من می درخشد
    إنی شربت کؤوس موت للْہُدٰی

    فوجدتُ بعد الموت عینَ بقاءِ
    من برائے ہدایت کاسہ ہائے موت نوشیدم

    پس بعد از موت چشمہ بقا یافتم
    إنی أُذِبتُ مِنَ الوداد و نارہِ

    فأری الغروبَ یسیل من إہرائی
    من از آتش محبت گداختہ شدہ ام

    پس اشکہا را می بینم کہ از گدازش من روان شدہ اند
    الدمع یجری کالسیول صبابۃً

    والقلب یُشوَی من خیال لقاءِ
    اشک مثل سیل ہا از شوق روان است

    ودل از خیال دیدار بریان مے شود
    وأری الوداد أنارَ باطنَ باطنی

    وأری التعشق لاحَ فی سِیمائی
    ومی بینم کہ دو ستے باطن باطن مرا روشن کردہ است

    وعشق در سیماء من ظاہر شدہ است
    الخَلقُ یبغُون اللذاذۃَ فی الہویٰ

    ووجدتُہا فی حُرقۃٍ وَ صَلاءِ
    مردم لذات را در ہوا و ہوس می جویند

    ومن لذت را در سوزش وسوختن یافتم
    اللّٰہ مقصد مُہْجَتی و أریدہ

    فی کل رشحِ القلم و الإملاءِ
    خدا مقصود جان من است ومن اورا

    بہر قطرہ قلم واملاء می خواہم
    یا أیّہا الناس اشربوا من قِربتی

    قد مُلأ من نور المفیض سِقائی
    اے مردمان ازمشک من بنوشید

    کہ از نور فیاض حقیقی مشک من ُ پراست
    قوم أطاعونی بصدق طویّۃٍ

    والآخرون تکبّروا لغطاءِ
    قومے است کہ از صدق مرا اطاعت کردند

    وقومے دیگر است کہ از پردہ نفس تکبر درزیدند
    حسدوا فسبّوا حاسدین ولم یزلْ

    حسَدتْ لئامٌ کلَّ ذی نعماءِ
    حسد کردند پس دشنام دادن وہمیشہ چنین است

    کہ لئیمان خداوند ان نعمت را حسد می کنند
    مَن أنکر الحقَّ المبین فإنّہُ

    کلبٌ وعَقب الکلبِ سِرْبُ ضِراءِ
    ہر کہ از حق ظاہر انکار کند او سگے است نہ انسان

    وپس آن سگ سگ بچگان ہستند کہ پیروی او می کنند
    آذَوا وسبّونی وقالوا کافرٌ

    فالیوم نقضی دَینَہم برِباءِ
    مرا ایذا دادند وسقط گفتند وگفتند کہ کافرے است

    پس امروز ما قرض ایشان بچیزے زیادہ ادامی کنیم
    واللّٰہِ نحن المسلمون بفضلہِ

    لکن نَزٰی جہلٌ علٰی العلماءِ
    وبخدا کہ ما از فضل او مسلمانان ہستیم

    لیکن برعلماء جہالت حملہ کردہ است
    نختار آثار النَّبیِّ وأَمْرَہُ

    نقفو کتابَ اللّٰہ لا الآراءِ
    ماآثار نبی صلی اللہ علیہ وسلم را اختیار مے کنیم

    و پیروی کتاب اللہ مے کنیم نہ پیروی رائے دیگر
    إنّا بَراءٌ فی مناہج دینہِ

    مِن کلّ زندیق عدوِّ دَہاءِ
    ما در دین او وراہ دین او از ہر ملحدے

    بیزاریم کہ دشمن عقل است
    إنا نطیع محمّدًا خیرَ الوریٰ

    نورُ المُہَیمن دَافِع الظَّلماءِ
    ما محمدصلی اللہ علیہ وسلم را پیروی می کنیم

    کہ نور خدا ودافع ظلمات است


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 269
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 269
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/269/mode/1up
    269
    أفنحن من قوم النصاری أکفَرُ

    وَیلٌ لکم ولہذہ الآراءِ
    آیا چہ ما از نصاریٰ کافر تر ہستیم

    ویل خدا برشما وبر رائے ہاشما
    یا شیخَ أرضِ الخبث أرضِ ’’بطالۃٍ‘‘

    کفّرتنی بالبغض والشحناءِ
    اے شیخ زمین پلید زمین بطالت

    مرا از روئے کینہ وبغض کافر قرار دادی
    آذیتَنی فَاخْشَ العواقب بعدہُ

    والنّار قد تبدو من الإیراءِ
    مرا آزار رسانیدی پس از انجام بدخود بے خوف مباش

    وسنت الٰہی است کہ آتش از افروختن مے افروزد
    تبّتْ یداک تبِعتَ کلَّ مفاسدٍ

    زلّتْ بک القدمانِ فی الأنحاءِ
    ہر دودست تو ہلاک شود تو فساد ہا را پیروی کردی

    وبگوناگون قدمہائے تو لغزیدند
    أودیٰ شَبابُکَ والنوائبُ أخرفتْ

    فالوقت وقت العجز لا الخیلاءِ
    جوانی تو ہلاک شد و حوادث ترا قریب بہ پیرشدن کرد

    پس وقت تو وقت عجز است نہ وقت تکبر وناز
    تبغیْ تباریْ والدوائرَ مِن ہوٰی

    فعلیکَ یسقُط حجرُ کلّ بلاءِ
    تو ہلاکت من وگرد شہا برمن زہواء نفس خود میخواہی

    پس بر تو سنگ ہر بلا مے افتد
    إنی من المَولٰی فکیف أُ تَبَّرُ

    فاخْشَ الغُیُور ولا تَمُتْ بجفاءِ
    من از جانب خدا ہستم پس چگونہ ہلاک شوم

    پس از غیرت آن غیور بترس وبظلم خود موت را اخیتار مکن
    أفتضرِبنَّ علی الصَّفاۃ زجاجۃً

    لا تنتھرْ واطلبْ طریق بقاءِ
    آیا برسنگ شیشہ را می زنی

    خودکشی مکن وطریق باقی ماندن بجو
    اُتْرُکْ سبیل شرارۃ وخباثۃٍ

    ہَوِّنْ علیک ولا تمُتْ بعناءِ
    راہ شرارت وخباثت را بگذار

    برحال خود نرمی کن واز رنج ممیر
    تُبْ أیّہا الغالی وتأتی ساعۃٌ

    تمسی تعُضّ یمینَک الشلّاءِ
    اے غلو کنندہ توبہ کن وساعتے می آید

    کہ دست راست خود را کہ خشک شدہ است خواہی گزید
    یا لیت ما ولدتْ کمثلک حامِلٌ

    خفّاش ظلماتٍ عدوّ ضیاءِ
    کاش مادرے پسرے ہمچو تو نہ زادے

    کہ خفاش تاریکی و دشمن روشنی است
    تسعٰی لتأخذنی الحکومۃُ مجرمًا

    ویل لکلّ مزوِّر وَشّاءِ
    تو کوشش می کنی کہ حکومت مرا ہمچو مجرمے بگیرد

    بر ہر دروغ آرایندہ تمام واویلاست
    لو کنتُ أُعطیتُ الولاءَ لعُفْتُہُ

    ما لی ودنیاکم؟ کفانِ کِسائی
    اگر حکومت مرا دہندی ہر آئینہ کراہت کردمی

    مرا بدنیاء شماچہ تعلق است مرا کلیم خود کافی است
    مُتنا بموت لا یراہ عدوُّنا

    بعُدتْ جنازتنا من الأحیاءِ
    مابمرگے بمردیم کہ دشمن ماحقیقت آن نمی داند

    جنازہ ما از زندگان دور افتادہ است
    تُغری بقولٍ مفترًی وتخرّص

    حکّامَنا الظانین کالجہلاءِ
    بقول درہم بافتہ حکام را می انگیزی

    وحکام کسانے ہستند کہ ہمچو جاہلان بدگمان ہستند
    یا أیّہا الأعمٰی أتُنکر قادرًا

    یحمی أحبّتَہ من الإیواءِ
    اے کور آیا تو وجود خدا از تسلیم نمی کنی

    کہ محبان خود را خود نزد خود جا دادہ نگہ می دارد


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 270
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 270
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/270/mode/1up
    270

    أنَسیتَ کیف حمَی القدیر کلیمَہُ

    أو ما سمعتَ مآلَ شمسِ حِراءِ
    آیا فراموش کردی کہ چگونہ خدا موسیٰ علیہ السلام رانگہ داشت

    یا انجام کارآن مرد کہ آفتاب مطلع حراء ست نشنیدی
    نحو السّماء و أمرِہا لا تنظُرَنْ

    فی الأرض دُسَّتْ عینُک العَمْیاءِ
    چشم تو سوئے آسمان وحکم آسمان نیست

    بلکہ چشم نابینائے تو در زمین فرو رفتہ
    غرّتْک أقوالٌ بغیر بصیرۃٍ

    سُتِرتْ علیک حقیقۃ الأنباءِ
    چند اقوال بغیر بصیرت ترا مغرور کرد

    وحقیقت خبرہا بر تو پوشیدہ ماند
    أدخلتَ حزبک فی قلیبِ ضلالۃٍ

    أفہذہ من سیرۃ الصلحاءِ
    گروہ خود را در چاہ ضلالت افگندی

    آیا ہمین سیرت نیکان است
    جاوزتَ بالتکفیر من حدّ التقی

    أشَققتَ قلبی أو رأیتَ خفائی
    در کافر قراردادن از حد تقویٰ در گزشتی

    آیا دل مرا بشگافتی یا حال پنہانی مرا دیدی
    کَمِّلْ بخُبثک کلَّ کَیدٍ تقصدُ

    واللّٰہُ یکفی العبدَ للإزراءِ
    ہمہ مکرے کہ میداری بکمال رسان

    وبندہ را برائے پناہ دادن اللہ کافی است
    تأتیک آیاتی فتعرفُ وَجْہَہَا

    فاصبِرْ ولا تترُکْ طریق حیاءِ
    نشانہائے من ترا خواہند رسیدپس آنہا را خواہی شناخت

    پس صبر کن وطریق حیا را از دست مدہ
    إنی کتبتُ الکتبَ مثلَ خوارقٍ

    اُنظُرْ أعندک ما یصوب کمائی
    من کتابہا مثل خوارق نوشتہ ام

    آیا نزد تو چیزے است کہ ہمچو آب من بیارد
    إن کنت تقدر یا خصیم کقدرتی

    فاکتُبْ کمثلی قاعدا بحذائی
    اے خصومت کنندہ اگر ترا قدرت مثل قدرت من است

    پس بمقابلہ من نشستہ بنویس
    ما کنتَ ترضی أن تُسمَّی جاہلًا

    فالآن کیف قعدتَ کاللَّکْناءِ
    تو آن نبودی کہ بجہل خود راضی گشتے

    پس اکنون ترا این چہ شدکہ ہمچوزن ژولیدہ زبان نشستہ
    قد قلتَ للسّفہاء إنّ کتابہُ

    عَفصٌ یُہِیج القیءَ من إصغاءِ
    تو سفیہان را گفتی کہ کتاب او

    بد مزہ است از شنیدن قے می آید
    ما قلتَ کالأدباء قُلْ لِیْ بعدما

    ظَہَرتْ علیک رسائلی کقُیاءِ
    بگو تو مثل ادیبان چہ گفتی

    بعد زانکہ رسائل من تراقے آرندہ معلوم شدند
    قد قلتَ إنی باسل متوغلٌ

    سَمَّیتَنی صیدًا من الخیلاءِ
    تو می گفتی کہ من دلاور ودرعلم توغل ہا دارم

    ونام من شکار نہادہ بودی
    الیَوم منّی قد ہرَبتَ کأرنبٍ

    خوفًا مِنَ الإخزاء والإعراءِ
    امروز از من ہمچو خرگوشے بگریختی

    ازین خوف کہ رسوا خواہی شد وبرہنہ خواہی شد
    فَکِّرْ أما ہذا التخوّف آیۃٌ

    رعبًا من الرحمٰن للإدراءِ
    فکر کن آیا این نشان خدا تعالیٰ نیست

    کہ بر تو رعب انداخت تاترا آگاہ کند
    کیف النضال وأنتَ تہرُب خشیۃً

    اُنظُرْ إلٰی ذلٍّ مِنَ اسْتعلاءِ
    تو چگونہ بامن معارضہ توانی کرد واز خوف می گریزی

    این پاداش تکبر وناز کردن است


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 271
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 271
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/271/mode/1up
    271

    إنّ المہَیمِن لا یحبّ تکبّرًا

    مِن خَلْقہ الضعفاء دود فناءِ
    خدا تعالیٰ از آفریدگان خود کہ ضعیف وکرم نیستی

    ہستند تکبر پسند نمی کند
    عُفِّرتَ مِن سہمٍ أصَابک فاجءًا

    أصبحتَ کالأموات فی الجَہْراءِ
    از تیرے درخاک غلطانیدہ شدی کہ بناگاہ ترارسید

    ودر بیابان ہمچو مردگان صبح کردی
    الآن أین فررتَ یا ابنَ تصلّفٍ

    قد کنتَ تحسبنا مِن الجہلاءِ
    اکنون اے پسر لاف ہا کجا گریختی

    وتو مارا از جہلاء پنداشتی
    یا مَن أہاج الفتن قُمْ لنضالنا

    کنا نعدّک نَوْجۃَ الحَثْواءِ
    اے آنکہ فتنہ ہا انگیخت برائے پیکار ما برخیز

    ماترا گردباد جائے غبار می پنداشتیم
    نطقی کَمَوْلِیِّ الاءَسِرَّۃِ جَنّۃٍ

    قولی کقِنْوِ النخل فی الخَلْقاءِ
    نطق من مثل آن باغے است کہ بروادئ او باران رحم باریدہ باشد

    وسخن من چون خوشہ نخل است کہ در زمین نرم باشد
    مُزِّقتَ لکنْ لا بضرب ہَراوۃٍ

    بل بالسیوف الجاریات کماءِ
    تو پارہ پارہ کردہ شدی مگر نہ بضرب عصا

    بلکہ بہ شمشیر ہا کہ ہمچو آب روان بودند
    إن کنت تحسدنی فإنی باسِلٌ

    أُصلِی فؤاد الحاسد الخطّاءِ
    اگر تو بامن حسدمی کنی پس من مردے دلاورم

    دل حاسدان خطا کاران رامے سوزم
    کذّبتَنی کفّرتنی حقّرتنی

    وأردتَ أن تَطَأَنَّنِیْ کعَفاءِ
    تومرا دروغگو قرار دادی تو مرا کافر گفتی تو تحقیر من کردی

    وخواستی کہ مرا بخاک بیامیزی
    ہذا إرادتک القدیمۃ مِن ہوَی

    واللّٰہُ کہفی مُہلِکُ الأعداءِ
    این قدیم ارادہ تو در دل تو ماندہ

    وخدا پناہ من وہلاک کنندہ دشمنان است
    إنی لشرُّ النّاس إن لم یأتِنی

    نصرٌ من الرحمٰن للإعلاءِ
    من بدترین مخلوقاتم اگر مدد خدا مرا نہ رسد

    از خدائے کہ رحمن وبلند کنندہ است
    ما کان أمر فی یدیک وإنّہُ

    ربٌّ قدیر حافظُ الضعفاءِ
    ہیچ امرے در دست تو نیست

    وخدائے من رب قدیر است کہ نگہدارندہ کمزوران است
    الکبر قد ألقاک فی درکِ اللظٰی

    إنّ التکبّر أردأُ الأشیاءِ
    این تکبر است کہ ترا درجہنم انداخت

    بلاشبہ تکبر از ہمہ چیزہا ردی تراست
    خَفْ قہرَ ربٍّ ذی الجلال إلی متی

    تقفو ہواک وتَنزُوَنْ کظِباءِ
    از قہر خدائے بزرگ بترس وتاکجا

    خواہش خود را پیروی خواہی کرد وہمچوآہوان خواہی جست
    تبغیْ زوالیْ والمہَیمن حافظی

    عادیتَ ربًّا قادرًا بمِرائی
    تو زوال من می خواہی وخدا نگہبان من است

    از دشمنی من خدا را دشمن گرفتی
    إنّ المقرَّب لا یضاع بفتنۃٍ

    والأجر یُکتب عند کُلّ بلاءِ
    ہر کہ مقرب حق باشد بہ ہیچ فتنہ برباد نمی شود

    ونزد ہر بلا برائے او اجرمی نویسند
    ما خاب مَن خاف المہیمنَ ربَّہُ

    إنّ المہیمن طالبُ الطلباءِ
    ہرکہ از خدا بترسد ہرگز زیان نمی بردارد

    بہ یقین بدان کہ خدا جویندہ جویندگان است


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 272
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 272
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/272/mode/1up
    272
    ہل تطمَع الدنیا مذلّۃَ صادقٍ

    ہیئات ذاک تخیُّل السفہاءِ
    آیا دنیا این طمع می دارد کہ صادقے ذلیل گردد

    این کجا ممکن است بلکہ این خیال سادہ لوحان است
    إنّ العواقب للذی ہو صالحٌ

    والکَرّۃ الأولٰی لأہل جفاءِ
    انجام پیکارہا برائے نیکو کاران است

    وغلبہ اول برائے ظالمان است
    شہدتْ علیہ، خصیمِ، سُنّۃُ ربِّنا

    فی الأنبیاءِ و زمرۃِ الصلحاءِ
    برین دعویٰ آن سنت خدا گواہ است

    کہ در انبیاء ونائبان انبیاء ماندہ
    مُتْ بالتغیظ واللَّظَی یا حاسدی

    إنا نموت بعزّۃٍ قَعْساءِ
    اے حاسد من بغضب ونائرہ آتش بمیر

    کہ ما باعزت پائدار خواہیم مرد
    إنّا نریٰ کلَّ العلٰی مِن ربّنا

    والخَلْقُ یأتینا لبَغْیِ ضیاءِ
    ماہمہ بلندی ہا او خدائے خود مے بینم

    ومردم برائے طلب روشنی نزدما خواہند آمد
    ہم یذکرونک لاعنینَ وذِکرُنا

    فی الصّالحات یُعَدُّ بعد فناءِ
    اوشان ترا بہ *** یاد خواہند کرد

    وذکر خیر ما از جملہ نیکی ہا شمار کردہ خواہد شد
    ہل تَہْدِمَنَّ القصرَ قصرَ إلٰہنا

    ہل تُحرِقَنْ ما صنَعہُ بنّائی
    آیا تو محل خدا را مسمار خواہی کرد

    آیا تو چیزے را خواہی سوخت کہ ساختہ بانی من است
    یرجون عثرۃَ جَدِّنا حسداؤُنا

    ونذوق نعماءً ا علٰی نعماءِ
    حاسدان می خواہند کہ بخت ما بسردر افتد

    حالانکہ مانعمت ہا بر نعمت ہا می چشیم
    لا تحسبنْ أمری کأَمْرٍ غُمّۃ

    جاء ت بک الآیات مثل ذُکاءِ
    امر مرا امرے مشتبہ مدان

    وہمچو آفتاب ترا نشانہا رسیدہ اند
    جاء ت خیارُ الناس شوقًا بعدما

    شمُّوا ریاحَ المِسک من تلقائی
    مردمان نیک نزدم آمدند

    بعد زانکہ خوشبوئے مشک از جانب من شمیدند
    طاروا إلیّ بألفۃ وإرادۃٍ

    کالطَّیرِ إذْ یَأْوی إلی الدَّفْواءِ
    سوئے من بالفت وارادت پرواز کردند

    مثل آن پرندہ کہ سوئے درخت بزرگ پناہ می گیرد
    لفَظتْ إلیّ بلادُنا أکبادَہا

    ما بقی إلا فضلۃ الفضلاءِ
    دیار ما جگر گوشہ ہائے خود سوئے ما افگند

    وبجز آن مردم دیگری نماند کہ فاضلان را ہمچو فضلہ اند
    أو مِن رجال اللّٰہ أُخْفِیَ سرُّہمْ

    یأْ توننی من بعدُ کالشہداءِ
    یا آن مردانے کہ ہنوز راز ایشان پوشیدہ داشتہ اند

    ایشان بعد زین مثل گواہان خواہند آمد
    ظہرتْ من الرحمٰن آیات الہُدیٰ

    سجدتْ لہا أمم من العرفاءِ
    از خدا تعالیٰ نشانہا ظاہر شدند

    و عارفان بمشاہدہ آن خدا را سجدہ کردند
    أما اللئام فینکرون شقاوۃً

    لا یھتدون بھٰذہ الاضواء
    مگر لئیمان از بدبختی انکار می کنند

    باین روشنی ہا ہدایت نمے پذیرند
    ہم یأْکلون الجِیْفَ مثل کلابنا

    ہم یشرَہون کأَنْسُرِ الصحراءِ
    اوشان ہمچو سگ ہائے ما مردار می خوردند

    اوشان حریص مردار ہمچو گرس بیابان اند


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 273
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 273
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/273/mode/1up
    273

    خَشَّوا ولا تخشی الرجالُ شجاعۃً

    فی نائبات الدّہر والہیجَاءِ
    مراترسانیدند ومردان بہادر نمی ترسند

    اگرچہ حوادث باشند یا جائے پیکار
    لما رأیتُ کمالَ لطفِ مہیمنی

    ذہب البلاء فما أحسُّ بلائی
    ہرگاہ کمال لطف خدائے خود دیدم

    بلا رفت پس بوجود بلا ہیچ احساس نکردم
    ما خاب مثلی مؤمن بل خصمُنا

    قد خاب بالتکفیر والإفتاءِ
    مثل من شخصے ہرگز خائب وخاسر نمی گردد بلکہ دشمنے

    کہ برائے تکفیر فتویٰ طیار کرد خائب و خاسر خواہد شد
    الغَمْرُ یبدو ناجذیہ تغیّظًا

    اُنظُرْ إلی ذی لوثۃ عَجْماءِ
    جاہلے دندان خود را از دشمنی آشکارا مے کند

    سوئے این غبی کہ مثل چار پایہ است نگہ کن
    قد أسخطَ المولٰی لیُرضی غیرہُ

    واللّٰہُ کان أحقَّ للإرضاءِ
    برائے رضاء اغیار خدا را ناراض کرد

    وخدا برائے راضی کردن احق واولیٰ بود
    کسّرتُ ظرف علومہم کزجاجۃٍ

    فتطایروا کتطایر الوَقْعاءِ
    من ظرف علوم ایشانرا ہمچو شیشہ شکستہ ام

    پس ہمچو غبارے کہ برخیزد پرواز کردند
    قد کفّروا مَن قال إنی مُسلمٌ

    لمقالۃ ابن بطالۃٍ وعُواءِ
    آن کسے را کافر قرار دادند کہ میگوید کہ من مسلمانم

    این ہمہ از سخن بٹالوی عوعو کنندہ است
    خوف المہیمن ما أری فی قلبہمْ

    فارتْ عُیونُ تمرُّدٍ وإباءِ
    خوف خدا در دل ایشان نمی بینم

    چشمہ ہائے سرکشے در جوش اند
    قد کنتُ آملُ أنّہم یخشونہُ

    فالیوم قد مالوا إلٰی الأہواءِ
    من امیدمی داشتم کہ ایشان از و خواہند ترسید

    پس امروز سوئے ہوا وہوس میل کردند
    نَضَّوا الثیاب ثیابَ تقوی کلُّہمْ

    ما بقی إلَّا لِبْسۃ الإغواءِ
    ہمہ جامہ ہائے پرہیز گاری را از خود برکشیدند

    وہیچ جامہ بجز جامہ اغوا نزدشان نماند
    ہل من عفیف زاہدٍ فی حزبہمْ

    أو صالحٍ یخشی زمان جزاءِ
    آیا ہیچ پرہیز گاری زاہدے درگروہ ایشان موجود است

    یا نیکو کاری موجود است کہ از روز پاداش می ترسد
    واللّٰہ ما أدری تقیًّا خائفًا

    فی فِرقۃ قاموا لہدم بنائی
    بخدا کہ من ہیچ پرہیز گارے خائفے درین فرقہ نمی بینم

    کہ برای ہدم بنیان من برخاستہ اند
    ما إنْ أری غیرَ العمائم واللُّحٰی

    أو آنُفًا زاغت من الخیلاءِ
    من بجز عمامہ ہا وریش ہا ہیچ نمی بینم

    یا بینی ہا می بینم کہ از تکبر کج شدہ اند
    لا ضیرَ إنْ ردّوا کلامی نخوۃً

    فسیَنجَعَنْ فی آخَرین ندائی
    ہیچ مضائقہ نیست اگر کلام مرا از تکبر خود رد کردند

    عنقریب این کلام در دلہائے دیگران اثر خواہد کرد
    لا تنظُرَنْ عجبًا إلٰی إفتاۂمْ

    غُسّ تلا غُسًّا بنَقْعِ عَمَاءِ
    سوئے فتوی ہائے ایشان نگہ مکن

    احمقے احمقے را در گرد و غبار کوری پیروی کرد
    قد صار شیطان رجیم حِبَّہُمْ

    یمسی ویُضحی بینہم للقاءِ
    شیطان راندہ محبوب شان شدہ است

    برائے ملاقات شان شام می آید وصبح می آید


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 274
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 274
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/274/mode/1up
    274

    أعمٰی قلوبَ الحاسدین شرورُہمْ

    أعری بواطنَہم لباسُ رِیاءِ
    دل حاسدان را شرارت ایشان کور کرد

    وجامہ ریا باطن ایشان را برہنہ نمود
    آذَوا وفی سُبل المہَیمن لا نریٰ

    شیءًا ألذَّ لنا من الإیذاءِ
    مرا ایذا دادند ودر راہ خدا

    ہیچ چیزے لذیذ تر از اذیت مرا نیست
    ما إنْ أریٰ أثقالہم کجدیدۃٍ

    إنّی طلیح السَّفر والأعباءِ
    بار ہائے ایشان نزد من باز تو نیست

    من فرسودہ سفر و فرسودہ بارہا ہستیم
    نفسی کعُسْبُرۃٍ فأُحْنِقَ صَلْبُہا

    مِن حمل إیذاء الوریٰ وجفاءِ
    نفس من مثل ناقہ است پس کمر آن ناقہ

    از ایذا ہا وجفاہا لاغر شدہ است
    ہذا ورَبِّ الصادقین لأَجْتَنِی

    نِعم الجنٰی مِن نخلۃ الآلاءِ
    من ہمین اصول دارم مگر قسم بخدائے راستبازان

    کہ ہمیشہ من از درخت نعمت ہا میوہ می چنیم
    إنّ اللئام یحقِّرون وذمُّہمْ

    ما زادنی إلا مقام سَناءِ
    لئیمان تحقیر من بمذ ّ مت خود می کنند

    مگر خدائے من مرا بلندی ہا داد
    زَمَعُ الأناس یحملقون کثعلبٍ

    یؤذوننی بتحوُّب ومُواءِ
    مردمان سفلہ بر من ہمچو روباہ حملہ می کنند

    واز آواز روباہ وآواز گربہ مرا ایذا می دہند
    واللّٰہِ لیس طریقہم نہج الہدیٰ

    بل مُنْیۃٌ نشأت من الأہواءِ
    بخدا این راہ شان راہ ہدایت نیست

    بلکہ آرزوئے نفسانی است کہ از ہوا وہوس پیدا شدہ است
    أعرضتُ عن ہذیانہم بتصامُمٍ

    وحسبتُ أن الشرّ تحت مِراءِ
    من از ہذیان ایشان دانستہ خود را بہرہ کردہ کنارہ کردم

    ودانستم کہ زیر مجادلہ شراست
    حسِبوا تفضُّلَہم لأجل تصبُّری

    فعَلَوا کمِثل الدُّخِّ مِن إغضائی
    ایشان بباعث صبر کردن من خویشتن را غالب دانستند

    پس بتکبر برآمدند ومثل دود از چشم خوابیدن من بلند شدند
    ما بقِی فیہم عِفّۃٌ وزہادۃٌ

    لا ذرّۃٌ مِن عیشۃٍ خَشْناءِ
    در ایشان ہیچ عفت وپرہیز گاری نماندہ است

    ونہ یک ذرہ زندگی مجاہدانہ
    قعدوا علی رأس الموائد مِن ہَوًی

    فرّوا من البأساءِ والضرّاءِ
    بر سر خوانہا از ہوا وہوس نشستند

    واز سختی ہا وگزندہا گریختند
    جَمَعُوْا من الأوباش حزب أرازلٍ

    فکأنہم کالخِثْیِ للإحماءِ
    چند کمینہ از اوباش جمع شدند

    پس گویا اوشان سرگین خشک برائے گرم کردن است
    لما کتبتُ الکتب عند غُلوّہمْ

    ببلاغۃ وعذوبۃ وصفاءِ
    ہرگاہ کتاب ہا بروقت غلو ایشان نوشتم

    وہمہ آن کتاب ہا ببلاغت وعذوبت وصفا پر بودند
    قالوا قرأنا لیس قوً لا جیّدًا

    أو قولُ عاربۃٍ من الأدباءِ
    گفتند خواندیم سخنے خوب نیست

    یا قول کسے است کہ از گروہ برگزیدہ عرب وادیبان است
    عربٌ أقام ببیتہ متستّرًا

    أملَی الکتابَ ببکرۃٍ ومساءِ
    یک عرب بطور پوشیدہ درخانہ او قیام کردہ است

    ہمان عرب کتاب را صبح و شام نوشتہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 275
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 275
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/275/mode/1up
    275

    اُنظُرْ إلٰی أقوالہم وتناقُضٍ

    سَلَب العنادُ إصابۃ الآراءِ
    سخن ہائے ایشان بہ بیں وتناقض را بہ بیں

    عنادے کہ میدارند رائے صائب را سلب کرد
    طَورًا إلی عربٍ عزَوہ وتارۃ

    قالوا کلام فاسد الإملاءِ
    وقتے کلام مرا سوئے عرب منسوب کردند

    وقت دیگر گفتند کہ این کلام خراب املاء دارد
    ہٰذا مِنَ الرّحمٰن یا حزبَ العِدا

    لا فِعْل شامیٍّ ولا رفقائی
    این املاء از خدا تعالیٰ است اے گروہ دشمنان

    نہ کار شامی است ونہ کار رفیقان من
    أعلی المہیمنُ شأنَنا وعلومنا

    نبنی منازلَنا علی الجَوزاءِ
    خدا تعالیٰ شان مارا وعلوم مارا بلند کرد

    ما منازل خود را بر جوزا بنامی کنم
    خَلُّوا مقامَ المولویّۃِ بعدَہُ

    وتَستّروا فی غَیہَبِ الخَوقاءِ
    بعد زین مقام مولویت را خالی کنید

    ودر تاریکی چاہے پوشیدہ شوید
    قد حُدّدتْ کالمرہفات قریحتی

    ففہِمتُ ما لا فہمہ أعدائی
    ہمچو شمشیر ہائے تیز طبعیت من تیز کردہ شد

    پس آن چیزہا فہمیدم کہ دشمنان نہ فہمیدند
    ہذا کتابی حازَ کلَّ بلاغۃ

    بہَر العقولَ بنضرۃ وبہاءِ
    این کتاب من ہر نوع بلاغت جمع کردہ است

    دانش ہا را بتازگی وخوبی حیران کرد
    اللّٰہ أعطانی حدائقَ علمہِ

    لولا العنایۃ کنتُ کالسّفہاءِ
    خدا تعالیٰ مرا باغہائے علم خود عطا فرمود

    اگر عنایت الٰہی نبودے من ہمچو بے خردان بودے
    إنی دعوت اللّٰہ ربًّا محسنًا

    فأری عیونَ العلم بعد دعائی
    من از خدائے خود خواستم کہ رب محسن است

    پس چشمہ ہائے علم بعد از دعا مرا نمود
    إنّ المہیمن لا یُعِزّ بنخوۃٍ

    إنْ رُمْتَ درجاتٍ فکُنْ کعَفاءِ
    بہ تحقیق خدا متکبر را عزت نمی دہد

    اگر درجہ ہا می خواہی ہمچو خاک شو
    واللّٰہِ قد فرّطت فی أمری ہوًی

    وأبیتَ کالمستعجل الخطّاءِ
    بخدا کہ درامر من از روئے ہوا وہوس تقصیر کردی

    ومثل جلد باز خطا کنندہ انکار کردی
    الحُرّ لا یستعجِلنْ بل إنّہُ

    یرنو بإمعان وکشفِ غطاءِ
    آنکہ آزاد از تعصب ہا است او جلدی نمی کند

    بلکہ بغور دل می بنگرد وازمبان پردہ می بردارد
    یخشی الکرامُ دعاءَ أہل کرامۃٍ

    رُحمًا علی الأزواج والأبناءِ
    نیک مردان ازدعائے اہل کرامت می ترسند

    وبر زنان وپسران خود ازین خوف رحم می کنند
    عندی دعاء خاطفٌ کصواعقٍ

    فحَذارِ ثم حذارِ مِن أرجائی
    نزد من دعائے است کہ ہمچو صاعقہ می جہد

    پس از کنارہ ہائے من دور باش دور باش
    واللّٰہ إنی لا أرید إمامۃً

    ہذا خیالک مِن طریق خطاءِ
    بخدا من ہیچ پیشوائی را نمی خواہم

    این خیال تو از خطاست
    إنّا نرید اللّٰہ راحۃَ روحِنا

    لا سُؤددًا وریاسۃ وعلاءِ
    ماخدا را می خواہیم کہ آرام روح ماست

    وریاست وبلندی را نمی خواہیم


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 276
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 276
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/276/mode/1up
    276

    إنا توکّلْنا علی خَلَّا قِنَا

    معطی الجزیل وواہب النعماءِ
    مابرخدائے خود توکل کردیم

    کہ بخشندہ نعمت ہا وعطا کنندہ است
    من کان للرَّحمٰن کان مکرَّمًا

    لا زال أہلَ المجد والآلاءِ
    ہر کہ خدارا باشد بزرگی مے یابد

    ہمیشہ در بزرگی ونعتمہا می ماند
    إن العدا یؤذوننی بخباثۃٍ

    یؤذون بالبہتان قَلْبَ بَراءِ
    دشمنان از راہ خباثت مرا ایذا می دہند

    از روئے بہتان دل بری را می آزارند
    ہم یُذعِرون بصیحۃ ونعُدّہم

    فی زُمرِ موتَی لا من الأحیاءِ
    ایشان مے ترسانند

    وما ایشان را از گروہ مردگان می شماریم نہ از زندگان
    کیف التخوف بعد قربِ مُشجِّعٍ

    مِن ہذہ الأصوات والضوضاءِ
    بعد قرب دلیر کنندہ چگونہ بترسیم

    چگونہ ازین آواز ہا وشور آواز ہا خوف پیدا شود
    یسعی الخبیث لِیُطفِئنْ أنوارَنا

    والشمس لا تخفَی من الإِخفاءِ
    پلیدے کوشش می کند کہ تانور ما بمیراند

    وآفتاب از پوشیدہ کردن پوشیدہ نمی شود
    إن المہیمن قد أتمَّ نوالَہُ

    فضلًا علیّ فصرتُ مِن نُحلاءِ
    خدا تعالیٰ برمن بخشش خود بکمال رسانیدہ است

    ازروئے فضل۔ پس من از بخشندگان شدم
    نعطی العلومَ لدفعِ متربۃِ الوری

    طالتْ أیادینا علی الفقراءِ
    مابرائے دفع درویشی مردم مال علم می بخشیم

    دست بخشش مابر فقیران دراز است
    إن شئتَ لیست أرضُنا ببعیدۃ

    مِن أرضک المنحوسۃ الصَّیداءِ
    اگر تو چیزے بخواہی زمین ما

    از زمین منحوس تو دور نیست
    صعبٌ علیک زمانُ سُؤْلِ محاسِبٍ

    إن متَّ یا خصمی علی الشحناءِ
    بر تو آن ساعت بسیار سخت است کہ پرسیدہ خواہی شد

    اگر تو بر ہمین کینہ بمردی اے دشمن من
    ما جئتُ مِن غیر الضرورۃ عابثًا

    قد جئتُ مثلَ المُزْنِ فی الرَّمْضاءِ
    من بے ضرورت ہمچو بازی کنندگان نیامدم

    من مثل باران آمدم کہ برزمین سوختہ بیفتد
    عینٌ جرتْ لعِطاشِ قومٍ أُضجروا

    أو ماءُ نَقْعٍ طافِحٍ لظِماءِ
    برائے تنگ دلان کہ سخت تشنہ بودند چشمہ جاری شد

    یاآب بسیار صافی برائے تشنگان
    إنی بأفضال المہیمن صادقٌ

    قد جئتُ عند ضرورۃ و وباءِ
    من بفضل خدا تعالیٰ صادقم

    بروقت ضرورت و وبا آمدہ ام
    ثم اللئام یکذّبون بخبثہم

    لا یقبَلون جوائزی وعطائی
    باز لئیمان از خباثت ایشان تکذیب می کنند

    وعطاہائے مرا قبول نمی کنند
    کَلِمُ اللئام أسنّۃٌ مذروبۃٌ

    وصدورہم کالحَرّۃ الرَّجْلاءِ
    سخنہائے لئیمان نیزہ ہائے تیز ہستند

    وسینہ ہائے اوشان مثل زمین بے نبات خشک افتادہ
    من حارب الصدّیقَ حارب ربَّہُ

    ونبیَّہ وطوائفَ الصلحاءِ
    ہر کہ باصدیق جنگ کرد باخدا جنگ کرد

    وبا پیغمبر خدا جنگ کرد و باتمام صلحاء جنگ کرد


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 277
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 277
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/277/mode/1up
    277

    واللّٰہِ لا أدری وُجوہَ کُشاحۃٍ

    مِن غیر أنّ البخل فارَ کماءِ
    بخدا من وجہ دشمنی ایشان ہیچ نمی یابم

    بجز اینکہ بخل اوشان مانند آب جوش کردہ است
    ما کنتُ أحسَب أنہم بعداوتی

    یذَرون حُکْمَ شریعۃٍ غرّاءِ
    من گمان نمی کردم کہ اوشان بباعث عداوت من

    حکم شریعت غرا را خواہند گذاشت
    عادیتُہم للّٰہِ حین تلاعبوا

    بالدِّین صوّالین مِن غُلواءِ
    ایشان را دشمن گرفتیم چون بادین

    بازی کردند واز تجاوز حملہ کردند
    رُبِّبْتُ مِن دَرِّ النبیِّ وعینِہ

    أُعطیتُ نورًا منْ سراجِ حِراءِ
    من از شیر نبی علیہ السلام پرورش یافتم واز چشمہ او مر اپرو ریدند

    من ازان آفتاب نور گرفتم کہ از غار حرا طلوع کردہ بود
    الشمس أُمٌّ والہلال سلیلُہا

    ینمو و ینشأ مِن ضیاء ذُکاءِ
    آفتاب مادر است وہلال پسراو

    آن پسر از روشنی آفتاب نشوونما می یابد
    إنی طلعتُ کمثل بدرٍ فانظروا

    لا خیر فی مَن کان کالکَہْمَاءِ
    من مانند بدر طلوع کردم پس بتامل بہ بینید

    درآن شخص ہیچ خیر نیست کہ چون زن کور مادر زاد باشد
    یا ربّ أیِّدْنا بفضلک وانتقِمْ

    ممَّنْ یدُعُّ الحقَّ کالغُثّاءِ
    اے خدائے ما تائید ماکن وازان شخص انتقام بگیر

    کہ حق را چون خس و خاشاک دفع کردن می خواہد
    یا ربّ قومی غلَّسوا بجہالۃٍ

    فارحَمْ وأنزِلْہم بدار ضیاءِ
    اے رب من قوم من از جہالت بتاریکی می روند

    پس رحم کن و او شان را درخانہ روشنی فرود آر
    یا لائمی إن العواقب للتُّقی

    فاربَأْ مآلَ الأمر کالعقلاءِ
    اے ملامت کنندہ من انجام کار برائے پرہیز گاران است

    پس ہمچو دانشمندان مال کار را منتظر باش
    اللّٰہُ أیّدنی وصافا رحمۃً

    و أمدّنی بالنعم و الآلاءِ
    خدا مرا تائید کردو از روئے رحمت مرا دوست گرفت

    ومرا با گونا گون نعمت ہا مدد داد
    فخرجتُ مِن وَہْدِ الضلالۃ والشقا

    ودخلتُ دار الرشد والإدراءِ
    پس من از مغاک گمراہی بیرون آمدم

    ودرخانہ رشد وآگاہیدن داخل شدم
    واللّٰہِ إن الناس سَقطٌ کُلّہم

    إلا الذی أعطاہ نعمَ لقاءِ
    وبخدا کہ مردم ہمہ ردی وبیکار اند

    مگر آن شخص کہ خدا تعالیٰ اورا نعمت لقابہ بخشد
    إنّ الذی أروی المہیمنُ قلبَہُ

    تأتیہ أفواج کمثل ظِماءِ
    آن شخص کہ خدا تعالیٰ دل اورا از معارف سیراب کرد

    نزد او فوج ہا مثل تشنگان می آیند
    ربّ السماء یُعِزّہ بعنایۃ

    تعنو لہ أعناقُ أہل دہاءِ
    خدائے آسمان او را از عنایت خود عزّت می دہد

    وبرائے او گردنہائے عقلمندان خمیدہ می شوند
    الأرض تُجعَل مثلَ غلمان لہُ

    تأتی لہ الأفلاک کالخدماءِ
    زمین ہمچو غلامان برائے او کردہ مے شود

    وآسمانہا برائے او ہمچو خادمان مے آیند
    مَن ذا الذی یُخزی عزیزَ جنابِہِ

    الأرض لا تُفنی شموسَ سماءِ
    آن کیست کہ عزیز جناب الٰہی را ذلیل کند

    زمین آفتاب ہائے آسمان را نابود نتواند کرد


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 278
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 278
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/278/mode/1up
    278

    الخَلْقُ دودٌ کلہم إلا الذی

    زکّاہ فضلُ اللّٰہ من أہواءِ
    ہمہ مردم کرمان ہستند

    مگر آنکہ خدا تعالیٰ اورا از ہوا و ہوس نجات داد
    فانہَضْ لہ إن کنتَ تعرف قدرہُ

    واسبِقْ ببذل النفس والإعداءِ
    پس برائے او برخیز اگر قدر او می داری

    واز ہمہ مردم در بذل نفس وشتافتن سبقت کن
    إن کنت تقصد ذُلَّہ فتُحقَّرُ

    و ستَخْسَأَنْ کالکلب یوم جزاءِ
    اگر تو ذلت اومی خواہی پست خود ذلیل خواہی شد

    وہمچو سگ در روز جزا راندہ خواہی شد
    غلبتْ علیک شقاوۃٌ فتحقِّرُ

    مَن کان عند اللّٰہ من کرماءِ
    برتو بدبختی غالب آمدہ است

    ازین سبب تو تحقیر شخصے میکنی کہ نزد خدا تعالیٰ از بزرگی یابندگان است
    صعبٌ علیک سراجنا وضیاؤنا

    تمشی کمشی اللُّصّ فی اللَّیلاءِ
    بر تو چراغ ما وروشنی مابسیار گران آمد

    ہمچو دزدان درشب تاریک می گردی
    تہذی وأَیْمُ اللّٰہِ ما لک حیلۃ

    یومَ النشور وعند وقت قضاءِ
    بیہودہ گوئی ہا میکنی وبخدا ترا ہیچ حیلہ نیست

    وہیچ عذرے در روز فیصلہ نیست
    برقٌ من المولی نریک ومیضَہ

    فاصبر کصبر العاقل الرَّنّاءِ
    این از خدا تعالیٰ روشنی است درخش آن تا خواہیم نمود

    پس ہمچو عاقلان دور اندیش صبر کن
    وأری تغیُّظَکم یفور کلُجّۃٍ

    موج کموج البحر أو ہَوجاءِ
    ومی بینم کہ غضب شما ہمچو دریا در جو ش است

    وموج آن مثل موج دریا یا موج باد سخت است
    واللّٰہِ یکفی مِن کُماۃِ نضالِنا

    جَلدٌ من الفتیان للأعداءِ
    بخدا از بہادران ما

    دشمنان را یک جوان کافی ست
    إنا علٰی وقت النوائب نصبرُ

    نُزجی الزمانَ بشدّۃ و رخاءِ
    مادر وقت حوادث صبر می کنیم

    و زمانہ را بہ تنگی و فراخی می گذرانیم
    فِتن الزمانِ ولدنَ عند ظہورکمْ

    والسَّیل لا یخلو من الغُثّاءِ
    از ظاہر شدن شما فتنہ ہا ظاہر شدہ اند

    وہیچ سیلابے از خس و خاشاک خالی نمی باشد
    عُفْنا لُقِیّاکم ولا أستکرہُ

    لو حلَّ بیتی عاسِلُ البَیداءِ
    ما از ملاقات شما کراہت مے داریم

    وما ہیچ کراہت نداریم اگر گرگ دشتی بخانہ ما درآید
    الیوم أنصحکم وکیف نصاحتی

    قومًا أضاعوا الدین للشحناءِ
    امروز شما را نصیحت می کنم ونصیحت من

    آن قوم راچہ فائدہ بخشد کہ از کینہ دین را ضائع کردہ اند
    قُلنا تعالوا للنضال وناضِلوا

    فتَکنّسوا کالظبی فی الأفلاءِ
    ماگفتیم کہ برائے مقابلہ بیائید ودر عربی مباحثہ کنید

    پس ہمچو آہو ان در بیابان ہا پوشیدہ شدند
    لا یبصرون ولا یرون حقیقۃً

    و تَہالکوا فی بخلہم و ریاءِ
    نہ مے بینند ونہ حقیقت را دریافت می کنند

    ودر بخل و ریا بمردند
    ہل فی جماعتہم بصیرٌ ینظرُ

    نحوی کمثل مبصّر رنّاءِ
    آیا درجماعت اوشان بینندہ است کہ سوئے من

    مثل مبصر غور کنندہ بہ بیند


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 279
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 279
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/279/mode/1up
    279
    ما ناضلونی ثم قالوا جاہلٌ

    اُنظُرْ إلٰی إیذاءِہم وجفاءِ
    بامن مقابلہ نکردند باز گفتند کہ جاہل است

    ایذاء ایشان بہ بین وجفاء ایشان بہ بین
    دعوی الکُماۃِ یلوح عند تقابُلٍ

    حدُّ الظُباتِ ینیر فی الہیجاءِ
    دعوی بہادران وقت مقابلہ ظاہر می گردد

    تیزی شمشیرہا درجنگ روشن مے شود
    رجلٌ ببطنِ ’’بَطَالۃ‘‘ بَطّالۃٌ

    تعلی۱؂ عداوتہ کرعدِ طَخاءِ
    در شہر بٹالہ کہ از بطالت پر است

    مردے است کہ دشمنی او ہمچو رعد ابر در جوش است
    لا یحضر المضمارَ مِن خوفٍ عرَا

    یہذی کنسوان بحجب خفاءِ
    از خوف کہ می دارد بمیدان نہ مے آید

    وہمچو زنان در پردہ ثاژ می خواید
    قد آثر الدنیا وجِیفۃَ دَشْتِہا

    و الموت خیر من حیاۃ غطاءِ
    دنیا ومردار آ ں را اختیار کردہ است

    ومردن از زندگی پردہ بسیار نیکو است
    یا صیدَ أسیافی إلٰی ما تأبِزُ

    لا تُنجِینّک سیرۃُ الأطلاءِ
    اے شکار شمشیر ہائے من تابکے جست خواہی کرد

    تا سیرت بچگان آہو نجات نخواہد داد
    نجسّتَ أرضَ ’’بطالۃ‘‘ منحوسۃ

    أرض محربِءۃٌ من الحِرباءِ
    تو زمین بتالہ را پلید کردی

    از وجود یک حربا تمام زمین از حربا براست
    إنی أریدک فی النضال کصائدٍ

    لا یرکَنَنْ أحد إلی إرزاءِ
    من ترا در روز مناضلہ مثل شکار جویندہ می خواہم

    پس باید کہ ہیچکس ترا پناہ ندہد
    صدرُ القناۃ ینوش صدرَک ضربُہُ

    ویریک مُرَّانی بحارَ دماءِ
    سر نیزہ ترا پارہ پارہ خواہد کرد

    ونیزہ در گذرندہ من ترا دریائے خون خواہد نمود
    جاشت إلیک النفس من کلماتنا

    خوفًا فکیف الحال عند مِرائی
    جان تو از گفتار من بلب رسید

    پس در وقت پیکار حال توچہ خواہد شد
    أُعطیتُ لُسْنًا کاللقوع مُروِّیًا

    وفصیلُہا تأثیرہا ببہاءِ
    من مثل ناقہ بسیار شمشیر زبان دادہ شدہ ام

    وبچہ آن ناقہ تاثیر سخن من است
    إن شئتَ کِدْ کلَّ المکائد حاسدًا

    البدر لا یغسو بلَغْیِ ضِراءِ
    اگر بخواہی ہر مکرے کہ داری ازروئے حسد بکن

    وخوب یاد دار کہ از شور سگ بچگان نقصان ماہتاب نیست
    کذّبتَ صدّیقًا وجُرْتَ تعمّدًا

    ولئن سطا فیُریک قعرَ عَفاءِ
    تو صدیقے را بہ دروغے منسوب کردی

    واگر آن صدیق بر تو حملہ کند ترامغاک خاک خواہد نمود
    ما شمَّ أنفی مرغمًا فی مشہدٍ

    وأثَرتُ نقعَ الموت فی الأعداءِ
    بینی من درہیچ جنگے ذلت ندیدہ است

    ودر دشمنان از موت غبار انگیختہ ام
    واللّٰہِ أخطأتم لنکبۃِ بَخْتِکمْ

    باریتُمُ ابنَ کریہۃٍ فَجّاءِ
    بخدا شما از بدبختی طالع خود سخت خطا کردہ اید

    کہ باآن شخص جنگ شروع کردہ ایدکہ تجربہ کارجنگ وبناگاہ کشندہ است
    إنی بحقدک کلَّ یوم أُرفَعُ

    أنمی علَی الشحناء والبغضاءِ
    من بکینہ تو ہر روز مراتب بلند مے یابم

    واز کینہ وبغض شما بخت من در نشوونما ست
    ایڈیشن اول میں سہو کتابت سے تعلی چھپا ہے درست تغلی ہے۔ ناشر


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 280
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 280
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/280/mode/1up
    280

    نلنا ثریّاء السّماء وسَمْکہ

    لنردّ إیمانًا إلٰی الغبراءِ
    ماتا ثریا آسمان رسیدہ ایم

    تاایمان را سوئے زمین فرود آریم
    اُنظُرْ إلی الفتن التی نیرانہا

    تجری دموعًا بل عیون دماءِ
    آن فتنہ ہا را بہ بین کہ آتشہائے آن فتنہ

    اشک ہا جاری می کند بلکہ چشمہ ہائے خون می برآرد
    فأقامنی الرحمٰن عند دخانہا

    لفلاح مُدّلجین فی اللیلاءِ
    پس خدا تعالیٰ مرا بروقت دخان آن فتنہ ہا قائم کرد

    تا آن را کہ درشب می روند نجات بخشد
    وقد اقتضتْ زفراتُ مرضَی مقدمی

    فحضرتُ حمّالًا کؤسَ شفاءِ
    ونعرہ ہائے مریضان آمدن مرا تقاضا کرد

    پس من باجا مہائے شفا نزد اوشان حاضر شدم
    لما أتیتُ القوم سبُّوا کالعدا

    وتخیّروا سُبل الشقا بإباءِ
    ہرگاہ آمدم قوم مرا دشنامہا دادند

    واز راہ انکار طریق شقاوت را اختیار کردند
    قالوا کذوب کَیْذُبانٌ کذبۃٌ

    بل کافر و مزوِّر و مُراءِی
    گفتند کہ این شخص کاذب وکذاب است

    بلکہ کافر و دروغ آرایندہ وریاء کار است
    مَن مُخبِرٌ عن ذلّتی ومصیبتی

    مولای خَتْمَ الرسل بحرَ عطاءِ
    آن کیست کہ این ذلت من ومصیبت من

    مولائے مرا رساند کہ خاتم الانبیاء ودریائے بخشش ہاست
    یا طیّبَ الأخلاق والأسماءِ

    أفأنت تُبعدنا من الآلاءِ
    اے پاک اخلاق وپاک نام ہا

    آیا تو مارا از نعمت ہائے خود رد مے کنی
    أنت الذی شغَف الجَنانَ محبّۃً

    أنت الذی کالرُّوح فی حَوبائی
    تو آن ہستی کہ محبت او درقعردل من فرو رفتہ است

    تو آن ہستی کہ درتن من مانند جان است
    أنت الذی قد جذب قلبی نحوہ

    أنت الذی قد قام للإصباءِ
    تو آن ہستی کہ سوئے او دل من کشیدہ شدہ است

    تو آن ہستی کہ برائے دلبرے من ایستاد
    أنت الذی بودادہ و بحبّہِ

    أُیِّدتُ بالإلہام و الإلقاءِ
    تو آن ہستی کہ ببرکت محبت او و دوستی او

    از الہام والقاء الٰہی تائید یافتم
    أنت الذی أعطی الشریعۃ والہدی

    نجّی رقاب النّاس من أعباءِ
    تو آن ہستی کہ شریعت وہدایت را بما رسایند

    وگرد نہائے مردم را از بار گران نجات داد
    ہیئات کیف نفرّ منک کمفسدٍ

    روحی فدَتْک بلوعۃٍ ووفاءِ
    این کجا ممکن است کہ ماہمچو مفسدے از تو بگریزیم

    جان من بسوزش عشق ووفا بر تو قربان است
    آمنتُ بالقرآن صُحفِ إِلہنا

    وبکل ما أخبرتَ من أنباءِ
    من بقرآن شریف ایمان آور دم کہ کتاب خدائے است

    وبا آن ہمہ خبرہا ایمان آوردم کہ تو خبر دادی
    یا سیدی یا موئلَ الضعفاءِ

    جئناک مظلومین من جہلاءِ
    اے سردار من اے جائے بازگشت ضعیفان

    ما بجناب تو از جور جاہلان رسیدیم
    إنّ المحبّۃ لا تضاع وتشتری

    إنّا نحبّک یا ذُکاءَ سخاءِ
    محبت ضائع کردہ نمی شود وکریمان آن را می خرند

    ما با تو اے آفتاب سخاوت محبت می داریم


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 281
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 281
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/281/mode/1up
    281

    یا شمسَنا انظُرْ رحمۃً وتحنّنًا

    یَسْعَی إلیک الخلق للإرکاءِ
    اے آفتاب ماسوئے من برحمت بنگر

    مردم سوئے تو برائے (پناہ )گرفتن مے دوند
    أنت الذی ہو عینُ کلّ سعادۃٍ

    تَہوی إلیک قلوب أہل صفاءِ
    تو آن استی کہ چشمہ ہر سعادت است

    سوئے تو دلہائے اہل صفا مائل ہستند
    أنت الذی ہو مبدء الأنوارِ

    نوَّرتَ وجہ المدن والبیداءِ
    تو آن ہستی کہ مبدء نورہا ست

    تو روئے شہر ہا وبیابان ہا روشن کردی
    إنی أریٰ فی وجہک المتہللِ

    شأنًا یفوق شؤونَ وجہِ ذُکاءِ
    من در روئے روشن تو

    شانے مے بینم کہ برشان آفتاب فوقیت ہا دارد
    شَمْسُ الہُدی طلعتْ لنا من مکّۃٍ

    عین الندا نبَعتْ لنا بحِراءِ
    آفتاب ہدایت از مکہ برما طلوع کرد

    چشمہ بخشش از غار حرا برائے ما بجوشید
    ضَاہَتْ أَیاۃُ الشمس بعضَ ضیاۂِ

    فإذا رأیتُ فہاجَ منہ بکائی
    روشنی آفتاب ببعض روشنیہائے او مے ماند

    پس چون دیدم بے اختیار مرا گریہ آمد
    نَسْعی کَفِتْیانٍ بدینِ مُحَمَّدٍ

    لَسْنَا کرجُلٍ فاقِدِ الأعضاءِ
    ہمچو مردان در دین محمدصلی اللہ علیہ وسلم کوشش می کنیم

    ما مثل آن شخصے نیستم کہ بے دست و پاباشد
    أَعْلَی المہیمِنُ ہِممنا فی دِینہِ

    نَبنی مَنَازِلنا علی الجوزاءِ
    خدا تعالیٰ در دین او ہمتہائے مارا بلند کردہ است

    منزلہائے خود را برجوزا بنامے نہیم
    إنا جُعِلْنا کالسیوف فندمَغُ

    رأس اللئام وہامۃ الأعداءِ
    ماہمچو شمشیرہا گردانیدہ شدہ ایم

    پس سرلئیمان را و دشمنان را مے کوبیم
    ومِنَ اللئام أری رُجَیلًا فاسقًا

    غُولًا لعینًا نُطفۃ السُّفہاءِ
    واز لئیمان مرد کے بدکار را مے بینم

    کہ شیطان ملعون از نطفہ سفیہان است
    شَکسٌ خَبیثٌ مُفْسِدٌ ومزوّرٌ

    نَحْسٌ یُسمَّی’’السَّعْد‘‘ فی الجہلاءِ
    بدگو خبیث مفسد دروغ آرایندہ است

    ومنحوس است ونام او جاہلان سعد اللہ نہادہ اند
    ما فارقَ الکفرَ الذی ہو إرثہُ

    ضاہَی أبَاہ وأُمَّہ بعماءِ
    کفرے کہ وراثت او بود ازان علیحدہ نشدہ است

    و در کوری مادر و پدر خود را مشابہ است
    قد کان مِن دُود الہنُودِ وزَرعہم

    مِن عَبدۃ الأَصْنَام کالآباءِ
    این شخص از ِ کرمان ہنود وتخم ایشان بود

    ومثل پدر وجد خود از بت پرستان بود
    فالآن قد غلَبتْ علیہ شقاوۃٌ

    کانت مُبِیدۃَ أُمِّہ العمیاءِ
    پس اکنون ہمان شقاوت بروئے غلبہ کرد

    کہ مادر کور اورا ہلاک کردہ بود
    إنی أراہ مُکذِّبًا ومکفِّرًا

    ومحقِّرًا بالسبّ والإزراءِ
    من اورا می بینم کہ او تکذیب من میکند ومرا کافر میگوید

    وبا تحقیر کردن ودشنام دادن بہتانہا مے بندد
    یُؤذِی فما نَشکو وما نَتَأَسّفُ

    کَلْبٌ فیَغْلِی قلبہ لِعُواءِ
    آزارمی دہد مگر ما نہ شکایت میکنیم ونہ افسوس میکنیم

    زیرانکہ او سگے است پس دل او برائے عوعو کردن مے جوشد


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 282
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 282
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/282/mode/1up
    282
    کَحَل العنادُ جفونَہ بعَجاجۃٍ

    فالآن مَن یحمیہ من إقذاءِ
    دشمنی پلک ہائے اورا بغبارکینہ سرمہ ساکردہ است

    پس اکنون کیست کہ چشمہائے اورا از غبار پر ہاند
    یا لاعِنی إنّ المہَیمِن یَنْظرُ

    خَفْ قہرَ ربّ قادر مولائی
    اے ملامت کنندہ من خدا تعالیٰ مے بیند

    از قہر مولائے من کہ قادر است خوف کن
    الحق لا یُصلَی بنار خدیعۃٍ

    أَنَّی مِن الخفّاش خسرُ ذُکاءِ
    راستی بآتش مکر سوختہ نمی شود

    از نفرت شبپرہ ہیچ نقصان آفتاب نیست
    إنی أراک تمیس بالخُیَلاءِ

    أنَسیتَ یوم الطعنۃ النَّجْلاءِ
    من می بینم کہ بہ ناز و تکبر خرامان مے روی

    آیا آن روز را فراموش کردی کہ زخم فراخ خواہد کرد
    لا تتّبِعْ أَہْواءَ نفسِک شقوۃً

    یلقیک حُبُّ النفس فی الخَوقاءِ
    ہوائے نفس خود را از شقاوت پیروی مکن

    ترا محبت نفس در چاہ خواہد انداخت
    فرسٌ خَبیثٌ خَفْ ذُرَی صہواتِہِ

    خَفْ أن تزلّک عدوُ ذی عدواءِ
    نفس تو اسپ پلید است از بلندی پشت او بترس

    ازین بترس کہ دویدن ناہموارا وترا برزمین افگند
    إنّ السُّمُوم لَشَرُّ ما فی العَالمِ

    ومِنَ السُّموم عَداوۃُ الصلحاءِ
    در دنیا زہرہا بدترین چیزے است

    واز زہرہا بدتر عداوت صالحان است
    آذَیتَنی خبثًا فلَسْتُ بصادقٍ

    إنْ لم تَمُتْ بالخزی یا ابنَ بغاءِ
    مرا بخباثت خود ایذا دادی پس من صادق نیم

    اگر تو اے نسل بدکاران بذلت نمیری
    اللّٰہ یُخزی حزبَکم ویُعزّنی

    حتی یجیء الناس تحت لوائی
    خدا تعالیٰ گروہ شمارا رسوا خواہد کرد ومرا عزت خواہد داد

    تا بحدیکہ مردم زیر لوائے من خواہند آمد
    یا ربَّنا افْتَحْ بیننَا بکرامۃٍ

    یا مَن یری قلبی ولُبَّ لِحائی
    اے خدائے ما درما بکرامت خود فیصلہ کن

    اے آنکہ دل مرا ومغز پوست مرا می بینی
    یا مَن أری أبوابہ مفتوحۃ

    لِلسَّائلین فلا ترُدّ دعائی
    اے آنکہ در ہائے او را

    برائے سائلان کشادہ می بینم دعائے مرارد مکن
    آمین
    الیوم قضینا ما کان علینا من التبلیغات، وعصمنا نفسنا من مأثم ترک الواجبات، وحان أن نصرف الوجہ عن ہذہ المباحثات، إلا ما ینفی لَبْس السائلین

    امروز ہرچہ برما از تبلیغ فرض بود ادا کردیم ونفس خود را از گناہ ترک واجب محفوظ داشتیم۔ ووقت آمد کہ ما ازیں مباحثات روبگردانیم۔ مگر آنچہ شبہ سائلان رد کند وقصد کردیم کہ بعد این
    والسائلات، وأزمعنا أن لا نخاطب* العلماء بعد ہذہ التوضیحات، ولو سبّونا کما أروا من قبل من العادات، وما غلّظنا علیہم إلا للتنبیہات،
    تو ضیحات علماء را مخاطب نکنیم۔ اگرچہ دشنام ہا دہند چنانچہ پیش زین ہمین عادات خود نمودہ اند۔ وما برایشان درشتی کہ کردیم محض برائے آگاہا نیدن کردیم۔ واعمال نزد خدا تعالیٰ
    وإنما الأعمال بالنیات۔فالآن نودّعہم بدموع جاریۃ من الحسرات، وعیون غریقۃ فی سیل العبرات، وہذہ منا خا تمۃ المخاطبات۔ تمّت

    وابستہ بہ نیت ہا ہستند۔ پس اکنون ایشان را باشکہائے جاری از حسرتہا وداع می کنیم وبا چشمہائےُ پرآب رخصت می نمائیم۔ پس امروز این رسالہ از ما خاتمہ مخاطبات است۔فقط
    *جو علماء مقابلہ اور مباہلہ کے لئے بلائے گئے ہیں بعض کے نام لکھنے سے رہ گئے ہیں جو ذیل میں لکھے جاتے ہیں۔ قاضی عبید اللہ قاضی مدراس، مولوی محمود مدراس،مولوی غلام رسول، مولوی شیخ عبد اللہ چک عمر کھاریاں گجرات،صاحبزادہ محمد امین چکوڑی، مولوی کلیم اللہ مچہیانہ، نجم الدین شادیوال، فضل احمد قلعدار، غلام علی شاہ منگووال، حافظ سلیمان ڈنگہ کھاریاں، مولوی عبد الصمد حکیم صدر پشاور، مولوی رحمۃ اللہ بڑبہنی میر پور جموں، مولوی حشمت پخروٹ میر پور، مولوی نیاز احمد قصبہ کھاریاں، خلیفہ محی الدین باولی گجرات، مولوی فیض احمد ڈوگا ؍؍ ، مولوی صدر الدین ملکی ؍؍، مولوی آغا خان سوداگرصدر پیشاور، مولوی عبد اللہ صاحب ؍؍، شیخ شیر محمد افسر نہر، میاں محمد فاضل راجوال کھاریاں گجرات، مولوی احمد دین سادھوکے؍؍، مولوی کرم دین پوڑانوالا؍؍، اللہ دتہ بلانی؍؍، غلام محمد؍؍، نور دین؍؍۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 283
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 283
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/283/mode/1up
    283
    قابل توجہ گورنمنٹ ہند
    انا قرأنا فی جریدۃ سِوِل ملتری انہ یشکومنّا فی حضرۃ الدّولۃ البرطانیۃ۔ ویظن کانّا اعداء ھذہ الدولۃ المبارکۃ۔ وینبّہ الدولۃ علی سوء نیاتنا وشرعوا قبنا یحثّھا علی ان تضیق علینا الحرّیۃ التی شملت طوائف الاقوام علی اختلاف مذاھبھم۔ وتبائن مشاربھم۔ وھذہ ھی الشئ الذی یثنی بہ علی الدولۃ بخصوصیّتھا ومزیّتھا علی دُول اخریٰ اعنی انّھا اعطت نسبۃ المساوات کل مذھب فی نظر القانون۔ وما خصّ احدًا لیکون محل الظنون۔ وھذا امر لا نری نظیرہ فی زمن الاولین۔
    وقد کتبنا غیر مرۃ انا نحن من خدام مصالح الدولۃ۔ وخادمیہ من کمال الصدق والامانۃ وامتلأ ت قلوبنا شکرًا۔ وصدورنا اخلاصًا۔ بمارئینا منھا من انواع الاحسان۔ والمنۃ والامتنان۔ وانا لسنا من قوم یعصون ولی النعمۃ۔ ویخفون فی قلوبھم امور الغش والخیانۃ۔ ویثیرون الفتن من خبث القریحۃ۔ بل نحن بفضل اللّٰہ نشکر الدولۃ علی مننھا۔ وندعوا اللّٰہ ان ننجینا بھا من شر الدنیا وفتنتھا۔ وقد نجونا بھا من البلایا والمحن۔ وانواع الخسران والفتن۔ ونعیش بالامن والعافیۃ تحت ظلھا الظلیل۔ وحُفظنا من آفات الاشرار بعد لہ الدمیل۔ انھا انارت سبلنا وسدت خللنا۔ وانا نری فی لیالیھا آمنًا مارئینا فی نھارٍ قبل ھذا الدولۃ۔ فما جزاء ھذا الاحسان الا الشکر بخلوص النیۃ۔ و شکرھم شئ قد ملأبہ روحنا۔ وجناننا وضمیر نا ولساننا۔ ولسنا کافری نعم المنعمین۔ ولنا علی ھٰذا الدعوی براھین ساطعۃ۔ ودلائل قاطعۃ۔ وھی انا لانثنی علی الدولۃ من ھذا الیوم فقط بل فی ھٰذا نفدت اعمارنا۔ وذابت عظامنا۔ وعلیہ توفت کبارنا۔ وکانوا عند الدولۃ من المکرمین وطالما قمنا للحمایۃ بخلوص القلب والمُھجۃ واشعنا الکتب فی حمایۃ اغراض الدولۃ الی بلاد الشام والروم وغیرھا من الدیار البعیدۃ۔ وھذا امر لن تجد الدولۃ نظیرھا فی غیرنا من المخلصین۔ فلا نعباء بمفتریات جریدۃ۔ ولا نخشی تحریر انامل مفسدۃ۔ ویا اسفا علٰی الذی یخوّف الدولۃ من غوائل عواقبنا۔ ویرغّبھا فی تعاقبنا۔ الم یفکر انّنا ذریۃ آباء انفدوا اعمارھم فی خدمات ھذہ الدولۃ افنسیت الدولۃ مساعیھم بھذہ السرعۃ۔ لِمَ لا تمنع الدولۃ اولئک الطغاۃ المفسدین عن نشر مثل تلک الاکاذیب۔ واشاعۃ ھذا البھتان العجیب۔ فانھا سم زعاف للذین لا یعرفون الحقیقۃ۔ ولا یفتشون الاصلیۃ۔ فکاد ان یصدقوھا کالمخدوعین۔ انہ یبکی علٰی حرّیّتنا ولا یٰری حرّیتہ التی تصول


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 284
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 284
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/284/mode/1up
    284
    علی الصّادقین۔ ویجعل المخلصین من المفسدین۔ الیس بواجب علٰی اھل الجرائد ان لا یتبعوا کلما بلغتھم من الحاسدین من اھل الغرض والنقمۃ۔ الیس علیھم ان یکتبوا بالصداقۃ وسلامۃ الطویۃ اھم خارجون من حدود القانون اوھم من المعفّوین۔
    یااھل الجرائد والمکائد اتامرون الناس بالبرو تنسون انفسکم۔ اھذا خیرلکم بل شرلکم لوکنتم تعلمون اتجعل الدولۃ المخلصین کالمفسدین۔ او یخفی علیہ ما تکتمون فی انفسکم کالمنافقین۔ قدجرّبت الدولۃ عواقب آبائنا۔ ورأت مرارًا ما ھو فی وعاء نا۔ وقد بلغنا تحت تجاربھا الی ستین۔ فان حدنا قبل ذالک الٰی نحو خمسین سنۃ عن طریق الخلوص۔ وآثرنا طرقًا فاسدۃ کاللصوص۔ فللدولۃ ان تظن کلما تظن کالمجربین العارفین۔ فان القلیل یُقاس علی الکثیر والصغیر علی الکبیر۔ وکذالک جرت عادۃ المتفرسین۔ والا فاتقوا اللہ واستحیوا ولا تجترؤوا ان کنتم صالحین۔ وواللّٰہ انا نحن براء من تلک التھمۃ۔ وما لنا ولھذہ المعصیۃ۔ وتُنزّہ النظائر السابقۃ ذیلنا عن مثل ھذہ البھتانات۔ والتھم والخرافات۔ وکیف وانا لاننسی الی ان نموت نعم ھذہ الدولۃ۔ ولا منن ھذہ الحکومۃ ۔ وقد اوصینا من کتاب اللہ بشکر المحسنین۔
    وھی آیات واحادیث لا یسع المقام سردھا الآن وقد کتبنا من قبل وابسطنا فیہ البیان۔ فلینظر من کان من الشائقین۔ وانا رئینا من ھذہ الدولۃ انواع الراحۃ۔ وحفظت بھا دماء نا واعراضنا واموالنا من انواع المصیبۃ۔ وتواردبھا علینا من نعم لا نستطیع ان ندخلھا تحت الحصر والاحصاء۔ فندعو لھذہ الدولۃ طول العمر والبقاء۔ وای عاقل یسب المحسن وینسی نعمہ ولا یذکر المنن۔ نعوذ باللّٰہ من سوء الفھم ووضع الرأی فی غیر محلہ وقولنا ھذا رد علی جریدۃ سِوِل واما الذی یزعم انّ حمایۃ الکفار کیف یجوز فقد رددنا وساوسہ غیر مرۃ۔ واثبتنا الامر بکثیر من ادلۃ واثبتنا ان النبی صلی اللہ علیہ وسلم وضع ھذا الاساس۔ وقال ما شکر اللہ من لا یشکر الناس۔ فھذا اصول محکم لا یردہ الا فاسق ولا یقبلہ الا صالح ولو بعد اللّتیا واللتی واما نحن فھذا مذھبنا ونشکر المحسن ولا نری اختلاف المذاھب ویصعب علینا خلاف ذالک ونختار علیہ الموت۔ ومن اجل ذالک قد اشعنا رأینا ھذا فی بلاد الاسلام الی ما وسع لنا وامکن وان فی ھذا دلیل قاطع علی اخلاصنا ولکن للذین لا یبخلون۔ فحاصل الکلام انا منزھون عن تلک التھم۔ ولنا شواھد لا تُرد شھادتھا ولا تشک فی صحتھا۔ ونتوکل علی اللّہ۔ لا حول ولا قوۃ الا باللّہ۔ وھو احکم الحاکمین۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 285
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 285
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/285/mode/1up
    285
    ضمیمہ رسالہ انجام آتھم
    3
    3
    رسالہ عربی کے ختم ہونے کے بعد ایک صاحب نے مجھ سے یہ سوال کیا ہے کہ آپ کے دعو ٰی کی تائید میں خدا تعالیٰ کی طرف سے کون سے ایسے نشان ظاہر ہوئے ہیں جو ایک طالب حق ان پر غور کرنے سے یہ سمجھ سکے کہ یہ کاروبار انسان کا منصوبہ نہیں بلکہ اس خدا کی طرف سے ہے جو عین وقت پر اسلام کی تائید کے لئے اپنے بندوں کو بھیجتا اور ان کا سچا ہونا اپنے خاص نشانوں کے ذریعہ ثابت کردیتا ہے۔
    سو واضح ہو کہ اگرچہ میں نے اس سوال کا جواب کئی مرتبہ اس سے پہلے بھی اپنی کتابوں میں لکھا ہے لیکن اب پھر ان متفرق باتوں کو حق کے طالبوں کے فائدہ کے لئے ایک ہی جگہ جمع کرکے لکھ دیتا ہوں۔ شاید وہ وقت پہنچ گیا ہو کہ لوگ میری باتوں میں غور کریں۔ پس غور سے سنو کہ عقلمندوں اور سوچنے والوں کے لئے میرے دعو ٰی کے ساتھ اس قدر نشان موجود ہیں کہ اگر وہ انصاف سے کام لیں تو ان کے تسلی پانے کے لئے نہایت کافی و شافی ذخیرہ خوارق موجود ہے ہاں اگر کوئی اس شخص کی طرح جس نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا مینہ کے بارے میں معجزہ استجابت دعا دیکھ کر یعنی کئی برسوں کے امساک باراں کے بعد مینہ برستا ہوا مشاہدہ کرکے پھر کہہ دیا تھا کہ یہ کوئی معجزہ نہیں۔ اتفاقاً بادل آیا اور مینہ برس گیا۔ انکار سے باز نہ آوے تو ایسے شخص کا علاج ہمارے پاس نہیں۔ ایسے لوگ ہمارے سید و مولیٰ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ہمیشہ آسمانی نشان دیکھتے رہے پھر یہ کہتے رہے۔3 ۱؂۔ جو شخص سچے دل سے خدا کا نشان دیکھنا چاہتا ہے اس کو چاہئے کہ سب سے پہلے اس نشان پر نظر کرے کہ اس عاجز کا ظاہر ہونا عین اس وقت میں ہے جس وقت کا ذکر ہمارے سید خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی زبان مبارک سے آپ فرمایا ہے یعنی صدی کا سر۔ پھر آپ نے یہ بھی فرمایا ہے کہ صلیب کے غلبہ کے وقت ایک شخص پیدا ہوگا جو صلیب کو توڑے گا۔ ایسے شخص کا نام آنحضرت نے مسیح ابن مریم رکھا ہے۔
    اب سوچو کہ صلیب کا غلبہ تو انتہاء تک پہنچ گیا اور نصاریٰ ٹڈیوں کی طرح دنیا پر محیط ہوگئے اور پادریوں کو اپنے شیطانی اغوا میں وہ کامیابی ہوئی جس کی کوئی نظیر نہیں اور صدی میں سے بھی تیرہ برس گذر گئے تو کیا اب تک صلیب کا توڑنے والا ظاہر نہ ہوا یا نعوذ باللہ پیشگوئی خطا گئی یا علماء مخالفین کی یہ خواہش ہے کہ اور سو۱۰۰ برس تک پادری لوگ اسلام کو پیروں کے نیچے کچلتے رہیں۔ جب تک کہ نئی صدی آوے اور


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 286
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 286
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/286/mode/1up
    286
    آسمان سے ان کا فرضی مسیح نازل ہو۔ پھر اس صدی پر بھی کیا امید ہے شاید وہ بھی خطا جائے۔ غرض اب یہ نازک وقت اور صدی کا سر چاہتا تھا کہ صلیب کا توڑنے والا پیدا ہو اور خنزیروں کو جن میں خنز یعنی فساد کا جوش ہے دلائل بینہ کے ساتھ قتل کرے۔ سو وہ ظاہر ہوگیا جس کو قبول کرنا ہو کرے۔
    پھر دوسرا نشان یہ ہے کہ اس گذشتہ زمانہ میں جس کو سترہ ۱۷برس گذر گئے۔ یعنی اس زمانہ میں جبکہ یہ عاجز گوشہ گمنامی میں پڑا ہوا تھا اور کوئی نہ جانتا تھا کہ کون ہے اور نہ کوئی آتا تھا اس وقت اس موجودہ زمانہ کی خبر دی گئی ہے جس میں ہر ایک طرف سے رجوع خلائق ہوا اور ایک دنیا میں شہرت ہوئی چنانچہ براہین احمدیہ میں سترہ برس کا الہام اس بارہ میں چھپا ہوا یہ ہے۔ انت منّی بمنزلۃ توحیدی وتفریدی فحان اَنْ تُعان وتعرف بین الناس۔ یاتون من کل فج عمیق۔ یعنی تو مجھ سے ایسا ہے جیسا کہ میری توحید اور تفرید۔ پس وہ وقت آتا ہے کہ تو مشہور کیا جائے گا۔ اور لوگ دور دور سے تیرے پاس آئیں گے۔
    اب دیکھو کیا یہ نشان نہیں کہ اس پیشگوئی کے مطابق اب خدا تعالیٰ نے لاکھوں انسانوں میں اور ہندوستان کے کناروں تک اس عاجز کو مشہور کردیا ہے اور ایسا ہی وہ لوگ جو ملنے کے لئے اس وقت تک آئے ان کی تعداد ساٹھ ہزار۶۰۰۰۰ سے بھی کچھ زیادہ ہوگی۔ کیا ایک عقلمند کو یہ پیشگوئی تعجب میں نہیں ڈالتی جو ایسے زمانہ میں ظاہر فرمائی گئی تھی جبکہ اس کا مفہوم بالکل قیاس سے بعید معلوم ہوتا تھا۔
    پھر ایک اور پیشگوئی سوچنے والوں کے لئے نشان ہے جس کا ذکر براہین حصہ سوم کے صفحہ ۲۴۱ میں ہے جس کو پندرہ برس کا عرصہ گذر گیا ہے۔ اس میں خدا تعالیٰ اس عاجز کو مخاطب کرکے فرماتا ہے کہ عیسائیوں کا ایک فتنہ ہوگا اور تجھ کو ایک واقعہ میں وہ کاذب ٹھہرائیں گے اور بالآخر خدا تیری سچائی ظاہر کرے گا۔ اس پیشگوئی کی عبارت یہ ہے۔ ولن ترضی عنک الیھود ولا النصاریٰ۔ وخرقوا لہ بنین وبناتٍ بغیر علم۔ قُل ھُوَ اللّٰہُ اَحَد اَللّٰہُ الصَّمَد لَمْ یَلِدْ وَلَمْ یُوْلَدْ وَلَمْ یَکُنْ لَّہُ کُفُوًا اَحَد۔ وَیَمْکُرُوْنَ وَیَمْکُرُ اللّٰہُ وَاللّٰہُ خَیْرُ الْمَاکِرِیْنَ۔ اَلْفِتْنَۃُ ھٰھُنَا فَاصْبِرْ کَمَا صَبَرَ اُولُو الْعَزْمِ۔ قُلْ رَبّ اَدْخِلْنِیْ مُدْخَلَ صِدْقٍ۔ یعنی یہود اور نصاریٰ تیرے پر خوش نہیں ہوں گے جب تک تو ان کے مذہب کا پیرو نہ ہو۔ یعنی ان کا خوش ہونا محال ہے۔ ان لوگوں نے یعنی نصاریٰ نے خدا کے لئے بیٹے بیٹیاں بنا رکھی ہیں حالانکہ خدا وہ ہے جس کے کوئی بیٹا نہیں اور نہ وہ کسی کا بیٹا۔ نہ اس کا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 287
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 287
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/287/mode/1up
    287
    کوئی ہمسر۔ اور عیسائی تیرے ساتھ ایک مکر کریں گے اور خدا بھی ان کے ساتھ مکر کرے گا خدا کے مکر سراسر نیک اور بہتر اور دوسروں کے مکروں پر غالب ہے۔ اس وقت عیسائیوں کی طرف سے ایک فتنہ برپا ہوگا۔ پس چاہئے کہ تو رسولوں اور نبیوں کی طرح صبر کرے اس وقت تو یہ دعا کر کہ اے میرے رب میرا صدق ظاہر کردے۔
    اب ذرہ آنکھ کھول کر دیکھو کہ یہ پیشگوئی کیسی صریح اور صاف طور پر آتھم کے قصہ کی خبردے رہی ہے جس میں عیسائیوں نے یہ مکر کیا کہ حقیقت کو چھپایا۔ پیشگوئی میں رجوع الی الحق کی شرط تھی جس سے آتھم نے فائدہ اٹھایا۔ کیونکہ وہ اخیر دن تک پیشگوئی سے ڈرتا رہا۔ یہاں تک کہ مارے ڈر کے دیوانہ کی طرح ہوگیا۔ اس لئے خدا تعالیٰ نے پیشگوئی کے وعدہ کے موافق اس کی موت میں تاخیر ڈال دی۔ عیسائی خوب جانتے تھے کہ وہ پیشگوئی کے خوف سے نیم جان ہوگیا۔ اس نے قسم نہ کھائی نہ اس نے حملہ کے الزاموں کو ثابت کیا مگر تب بھی پادریوں نے شرارت پر کمر باندھی۔ اور امرتسر اور بہت سے دوسرے شہروں میں نہایت شوخی سے ناچتے پھرے کہ ہماری فتح ہوئی اور ان کے نہایت پلید اور بدذات لوگوں نے گالیاں نکالیں اور سخت بدزبانی کی۔ غرض جیسا کہ پندرہ برس پہلے خدا تعالیٰ فرما چکا تھا کہ عیسائی فتنہ برپا کریں گے۔ ایسا ہی ہوا اور یہودی صفت مولوی اور ان کے چیلے ان کے ساتھ ہوگئے۔ آخر جیسا کہ خدا تعالیٰ نے اس پیشگوئی میں اشارہ فرمایا تھا کہ قُل رَبِّ اَدْخِلْنِیْ مُدْخَلَ صِدْقٍ ۔ ایسا ہی اس عاجز کا صدق ظاہر ہوگیا اور آتھم جیسا کہ الہام میں بار بار ظاہر کیا گیا تھا اپنی بیباکی کے بعد اخیری اشتہار سے سات مہینے تک فوت ہوگیا۔
    اب دیکھنا چاہئے کہ یہ کیسا عظیم الشان نشان ہے۔ اور یہ ایک نشان نہیں بلکہ دو۲ نشان ہیں۔ }۱{ایک یہ کہ عیسائیوں کے فتنہ کی پندرہ برس پہلے خبر دی گئی۔ }۲{ دوسرے یہ کہ آخر وہ فتنہ برپا ہوکر اس پیشگوئی کے مطابق اور نیز دوسری پیشگوئی کے مطابق آتھم مرگیا اور صدق ظاہر ہوا۔ اگر ان دونوں پیشگوئیوں کو یکجائی نظر سے دیکھا جائے تو خدا تعالیٰ کی ایک عظیم الشان قدرت نظر کے سامنے آجائے گی* اور اس میں ایک اور عظمت یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی بھی اس کے پوری
    * حاشیہ۔ ایک مردہ پرست فتح مسیح نام نے فتح گڈہ تحصیل بٹالہ ضلع گورداسپورہ سے پھر اپنی پہلی بے حیائی کو دکھلا کر ایک گندہ اور بدزبانی سے بھرا ہوا خط لکھا ہے۔ جس میں وہ پھر اپنی بے شرمی سے کام لے کر یہ ذکر بھی درمیان میں لاتا ہے کہ آتھم کی نسبت پیشگوئی پوری نہیں ہوئی۔ سو ہم اس پیشگوئی کے پورا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 288
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 288
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/288/mode/1up
    288
    ہونے سے پوری ہوگئی کیونکہ آپ نے فرمایا تھا کہ عیسائیوں اور اہل اسلام میں آخری زمانہ میں ایک جھگڑا ہوگا۔ عیسائی کہیں گے کہ ہم حق پر ہیں اور مسلمان کہیں گے کہ حق ہم میں ظاہر ہوا۔ اس وقت عیسائیوں کے لئے شیطان آواز دے گا کہ حق آل عیسیٰ کے ساتھ ہے اور مسلمانوں کے لئے آسمان سے آواز آئے گی کہ حق آل محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہے۔ سو یاد رہے کہ یہ پیشگوئی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی آتھم کے قصہ کے متعلق ہے کیونکہ زمین کے شیطانوں نے آتھم کے مقدمہ میں عیسائیوں کا ساتھ کیا اور یہ کہا کہ عیسائی فتح پا گئے چنانچہ پلید دل مولوی اور بعض اخباروں والے انہیں شیطانوں میں سے تھے جنہوں نے حق اور سچائی اور دین کا پاس نہ کیا اور آسمان کی آواز جو خدا تعالیٰ کا پاک الہام تھا جو اس عاجز پر نازل ہوا اس الہام نے بار بار گواہی دی کہ اسلام کی فتح ہے۔ آخر زمین کے شیطانوں نے شکست کھائی اور آسمان کی آواز کی سچائی ثابت ہوئی۔ یہ ایسی کھلی سچائی ہے جو کوئی اس سے انکار نہیں کرسکتا یہ کیسی نابینائی تھی کہ پلید دل لوگوں نے شرطی پیشگوئی کو ایسا سمجھ لیا کہ گویا اس کے ساتھ کوئی بھی شرط نہیں
    ہونے کے بارے میں بہت کچھ ثبوت رسالہ انوار الاسلام اور رسالہ ضیاء الحق اور رسالہ انجام آتھم میں دے چکے ہیں اور اب بھی ہم بیان کرچکے ہیں کہ اس پیشگوئی کی بنیاد نہ آج سے بلکہ پندرہ برس پہلے سے ڈالی گئی تھی۔ جس کا مفصل ذکر براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں موجود ہے۔ سو ایسے انتظام کے ساتھ پیشگوئی کو پورا کرنا انسان کا کام نہیں ہے۔
    یسوع کی تمام پیشگوئیوں میں سے جو عیسائیوں کا مردہ خدا ہے اگر ایک پیشگوئی بھی اس پیشگوئی کے ہم پلّہ اور ہم وزن ثابت ہو جائے تو ہم ہر ایک تاوان دینے کو طیّار ہیں۔ اس درماندہ انسان کی پیشگوئیاں کیا تھیں صرف یہی کہ زلزلے آئیں گے قحط پڑیں گے لڑائیاں ہوں گی پس ان دلوں پر خدا کی *** جنہوں نے ایسی ایسی پیشگوئیاں اس کی خدائی پر دلیل ٹھہرائیں اور ایک مردہ کو اپنا خدا بنا لیا۔ کیا ہمیشہ زلزلے نہیں آتے کیا ہمیشہ قحط نہیں پڑتے۔ کیا کہیں نہ کہیں لڑائی کا سلسلہ شروع نہیں رہتا۔ پس اس نادان اسرائیلی نے ان معمولی باتوں کا پیشگوئی کیوں نام رکھا۔ محض یہودیوں کے تنگ کرنے سے اور جب معجزہ مانگا گیا تو یسوع صاحب فرماتے ہیں کہ حرامکار اور بدکار لوگ مجھ سے معجزہ مانگتے ہیں۔ ان کو کوئی معجزہ دکھایا نہیں


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 289
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 289
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/289/mode/1up
    289
    یہ کیسی خباثت تھی کہ آتھم کی موت کو جو عین الہام کے موافق بیباکی کے بعد بلاتوقف ظہور میں آئی کسی نے اس کو نشان الٰہی قرار نہ دیا۔ وہ گندے اخبار نویس جو آتھم کے مؤیّد تھے۔ پیشگوئی کی حقیقت کھلنے کے بعد ایسے تجاہل سے چپ ہوئے کہ گویا مرگئے۔ اب آنکھیں کھولو اور اٹھو اور جاگو اور تلاش کرو کہ آتھم کہاں ہے۔ کیا خدا کے حکم نے اس کو قبر میں نہ پہنچا دیا۔ ہر ایک منصف اس پیشگوئی کو تسلیم کرے گا
    جائے گا۔ دیکھو یسوع کو کیسی سوجھی اور کیسی پیش بندی کی۔ اب کوئی حرام کار اور بدکار بنے تو اس سے معجزہ مانگے۔ یہ تو وہی بات ہوئی کہ جیساکہ ایک شریر مکار نے جس میں سراسر یسوع کی روح تھی لوگوں میں یہ مشہور کیا کہ میں ایک ایسا ورد بتلا سکتا ہوں جس کے پڑھنے سے پہلی ہی رات میں خدا نظر آجائے گا۔ بشرطیکہ پڑھنے والا حرام کی اولاد نہ ہو۔ اب بھلا کون حرام کی اولاد بنے اور کہے کہ مجھے وظیفہ پڑھنے سے خدا نظر نہیں آیا۔ آخر ہر ایک وظیفچی کو یہی کہنا پڑتا تھا کہ ہاں صاحب نظر آگیا۔ سو یسوع کی بندشوں اور تدبیروں پر قربان ہی جائیں اپنا پیچھا چھڑانے کے لئے کیسا داؤ کھیلا۔ یہی آپ کا طریق تھا ۔ ایک مرتبہ کسی یہودی نے آپ کی قوت شجاعت آزمانے کے لئے سوال کیا کہ اے استاد قیصر کو خراج دینا روا ہے یا نہیں۔ آپ کو یہ سوال سنتے ہی اپنی جان کی فکر پڑ گئی کہ کہیں باغی کہلا کر پکڑا نہ جاؤں۔ سو جیسا کہ معجزہ مانگنے والوں کو ایک لطیفہ سنا کر معجزہ مانگنے سے روک دیا تھا۔ اس جگہ بھی وہی کارروائی کی اور کہا کہ قیصر کا قیصر کو دو اور خدا کا خدا کو۔ حالانکہ حضرت کا اپنا عقیدہ یہ تھا کہ یہودیوں کے لئے یہودی بادشاہ چاہئے نہ کہ مجوسی۔ اسی بنا پر ہتھیار بھی خریدے۔ شہزادہ بھی کہلایا مگر تقدیر نے یاوری نہ کی۔
    متی کی انجیل سے معلوم ہوتا ہے کہ آپ کی عقل بہت موٹی تھی۔ آپ جاہل عورتوں اور عوام الناس کی طرح مرگی کو بیماری نہیں سمجھتے تھے بلکہ جنّ کا آسیب خیال کرتے تھے۔
    ہاں آپ کو گالیاں دینے اور بدزبانی کی اکثر عادت تھی۔ ادنیٰ ادنیٰ بات میں غصہ آجاتا تھا۔ اپنے نفس کو جذبات سے روک نہیں سکتے تھے۔ مگر میرے نزدیک آپ کی یہ حرکات جائے افسوس نہیں کیونکہ آپ تو گالیاں دیتے تھے اور یہودی ہاتھ سے کسر نکال لیا کرتے تھے۔
    یہ بھی یاد رہے کہ آپ کو کسی قدر جھوٹ بولنے کی بھی عادت تھی۔ جن جن پیشگوئیوں کا اپنی ذات کی نسبت توریت میں پایا جانا آپ نے بیان فرمایا ہے۔ ان کتابوں میں ان کا نام و نشان نہیں پایا جاتا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 290
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 290
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/290/mode/1up
    290
    مگر شاید بعض بدذات مولوی منہ سے اقرار نہ کریں مگر دل اقرار کرگئے ہیں۔
    پھر ایک اور پیشگوئی نشان الٰہی ہے جس کا ذکر براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں ہے اور وہ یہ ہے یااحمد فاضت الرحمۃ علٰی شفتیک۔ اے احمد فصاحت بلاغت کے چشمے تیرے لبوں پر جاری کئے گئے۔ سو اس کی تصدیق کئی سال سے ہورہی ہے۔ کئی کتابیں عربی بلیغ فصیح میں تالیف کرکے
    بلکہ وہ اوروں کے حق میں تھیں جو آپ کے تو ّ لد سے پہلے پوری ہوگئیں اور نہایت شرم کی بات یہ ہے کہ آپ نے پہاڑی تعلیم کو جو انجیل کا مغز کہلاتی ہے۔ یہودیوں کی کتاب طالمود سے چرا کر لکھا ہے۔ اور پھر ایسا ظاہر کیا ہے کہ گویا یہ میری تعلیم ہے۔ لیکن جب سے یہ چوری پکڑی گئی عیسائی بہت شرمندہ ہیں۔ آپ نے یہ حرکت شاید اس لئے کی ہوگی کہ کسی عمدہ تعلیم کا نمونہ دکھلا کر رسوخ حاصل کریں۔ لیکن آپ کی اس بیجا حرکت سے عیسائیوں کی سخت رو سیاہی ہوئی اور پھر افسوس یہ ہے کہ وہ تعلیم بھی کچھ عمدہ نہیں عقل اور کانشنس دونوں اس تعلیم کے منہ پر طمانچے مار رہے ہیں۔ آپ کا ایک یہودی استاد تھا جس سے آپ نے توریت کو سبقاً سبقاً پڑھا تھا۔ معلوم ہوتا ہے کہ یا تو قدرت نے آپ کو زیر کی سے کچھ بہت حصہ نہیں دیا تھا اور یا اس استاد کی یہ شرارت ہے کہ اس نے آپ کو محض سادہ لوح رکھا۔ بہرحال آپ علمی اور عملی قویٰ میں بہت کچے تھے۔ اسی وجہ سے آپ ایک مرتبہ شیطان کے پیچھے پیچھے چلے گئے۔
    ایک فاضل پادری صاحب فرماتے ہیں کہ آپ کو اپنی تمام زندگی میں تین مرتبہ شیطانی الہام بھی ہوا تھا چنانچہ ایک مرتبہ آپ اسی الہام سے خدا سے منکر ہونے کے لئے بھی طیّار ہوگئے تھے۔
    آپ کی انہیں حرکات سے آپ کے حقیقی بھائی آپ سے سخت ناراض رہتے تھے اور ان کو یقین تھا کہ آپ کے دماغ میں ضرور کچھ خلل ہے اور وہ ہمیشہ چاہتے رہے کہ کسی شفاخانہ میں آپ کا باقاعدہ علاج ہو شاید خدا تعالیٰ شفا بخشے۔
    عیسائیوں نے بہت سے آپ کے معجزات لکھے ہیں۔ مگر حق بات یہ ہے کہ آپ سے کوئی معجزہ نہیں ہوا۔ اور اس دن سے کہ آپ نے معجزہ مانگنے والوں کو گندی گالیاں دیں اور ان کو حرام کار اور حرام کی اولاد ٹھہرایا۔ اسی روز سے شریفوں نے آپ سے کنارہ کیا اور نہ چاہا کہ معجزہ مانگ کر حرامکار اور حرام


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 291
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 291
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/291/mode/1up
    291
    ہزارہا روپیہ کے انعام کے ساتھ علماء اسلام اور عیسائیوں کے سامنے پیش کی گئیں مگر کسی نے سر نہ اٹھایا اور کوئی مقابل پر نہ آیا۔ کیا یہ خدا کا نشان ہے یا انسان کا ہذیان ہے۔
    پھر ایک اور پیشگوئی نشان الٰہی ہے جو براہین کے صفحہ ۲۳۸ میں درج ہے۔ اور وہ یہ ہے الرّحمٰن عَلّم القُرآن۔ اس آیت میں اللہ تعالیٰ نے علم قرآن کا وعدہ دیا تھا۔ سو اس وعدہ کو ایسے طور سے
    کی اولاد بنیں۔ آپ کا یہ کہنا کہ میرے پیرو زہر کھائیں گے اور ان کو کچھ اثر نہیں ہوگا۔ یہ بالکل جھوٹ نکلا۔ کیونکہ آج کل زہر کے ذریعہ سے یورپ میں بہت خودکشی ہورہی ہے۔ ہزارہا مرتے ہیں۔ ایک پادری گو کیسا ہی موٹا ہو تین رتی اسٹرکنیا کھانے سے دو گھنٹے تک بآسانی مرسکتا ہے۔ پھر یہ معجزہ کہاں گیا۔ ایسا ہی آپ فرماتے ہیں کہ میرے پیرو پہاڑ کو کہیں گے کہ یہاں سے اٹھ اور وہ اٹھ جائے گا یہ کس قدر جھوٹ ہے بھلا ایک پادری صرف بات سے ایک الٹی جوتی کو سیدھا کرکے تو دکھلائے۔
    ممکن ہے کہ آپ نے معمولی تدبیر کے ساتھ کسی شب کور وغیرہ کو اچھا کیا ہو۔ یا کسی اور ایسی بیماری کا علاج کیا ہو۔ مگر آپ کی بدقسمتی سے اسی زمانہ میں ایک تالاب بھی موجود تھا جس سے بڑے بڑے نشان ظاہر ہوتے تھے۔ خیال ہوسکتا ہے کہ اُس تالاب کی مٹی آپ بھی استعمال کرتے ہوں گے اسی تالاب سے آپ کے معجزات کی پوری پوری حقیقت کھلتی ہے اور اسی تالاب نے فیصلہ کردیا ہے کہ اگر آپ سے کوئی معجزہ بھی ظاہر ہوا ہو تو وہ معجزہ آپ کا نہیں بلکہ اس تالاب کا معجزہ ہے۔ اور آپ کے ہاتھ میں سوا مکر اور فریب کے اور کچھ نہیں تھا۔ پھر افسوس کہ نالائق عیسائی ایسے شخص کو خدا بنا رہے ہیں۔
    آپ کا خاندان بھی نہایت پاک اور مطہر ہے۔ تین دادیاں اور نانیاں آپ کی زنا کار اور کسبی عورتیں تھیں۔ جن کے خون سے آپ کا وجود ظہور پذیر ہوا۔ مگر شاید یہ بھی خدائی کے لئے ایک شرط ہوگی۔ آپ کا کنجریوں سے میلان اور صحبت بھی شاید اسی وجہ سے ہو کہ جدّی مناسبت درمیان ہے ورنہ کوئی پرہیزگار انسان ایک جوان کنجری کو یہ موقعہ نہیں دے سکتاکہ ہ وہ اس کے سر پر اپنے ناپاک ہاتھ لگاوے اور زناکاری کی کمائی کا پلید عطر اس کے سر پر ملے اور اپنے بالوں کو اس کے پیروں پر ملے۔ سمجھنے والے سمجھ لیں کہ ایسا انسان کس چلن کا آدمی ہوسکتا ہے۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 292
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 292
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/292/mode/1up
    292
    پورا کیا کہ اب کسی کو معارف قرآنی میں مقابلہ کی طاقت نہیں۔ میں سچ سچ کہتا ہوں کہ اگر کوئی مولوی اس ملک کے تمام مولویوں میں سے معارف قرآنی میں مجھ سے مقابلہ کرنا چاہے اور کسی سورۃ کی ایک تفسیر
    آپ وہی حضرت ہیں جنہوں نے یہ پیشگوئی بھی کی تھی کہ ابھی یہ تمام لوگ زندہ ہوں گے کہ میں پھر واپس آجاؤں گا۔ حالانکہ نہ صرف وہ لوگ بلکہ انیس۱۹ نسلیں ان کے بعد بھی انیس۱۹ صدیوں میں مرچکیں۔ مگر آپ اب تک تشریف نہ لائے۔ خود تو وفات پاچکے مگر اس جھوٹی پیشگوئی کا کلنک اب تک پادریوں کی پیشانی پر باقی ہے۔
    سو عیسائیوں کی یہ حماقت ہے کہ ایسی پیشگوئیوں پر تو ایمان لاویں۔ مگر آتھم کی پیشگوئی کی نسبت جو صاف اور صریح طور پر پوری ہوگئی اب تک انہیں شک ہو۔ سوچنا چاہئے کہ یہ وہ عظیم الشان پیشگوئی ہے جس کی پندرہ سال پہلے خبر دی گئی ہے۔ اور جو اپنی شرط کے موافق اور اپنے آخری الہاموں کے موافق پوری ہوگئی۔ اس سے انکار کرنا کیا صریح خباثت ہے یا نہیں۔ کیا یہ انسان کا کام ہے کہ ایک مخفی امر کی پندرہ۱۵ سال پہلے خبر دے اور پھر شرط کے موافق نہ خلاف شرط پیشگوئی کو انجام تک پہنچاوے۔
    یہ مردہ پرست لوگ کیسے جاہل اور خبیث طینت ہیں کہ سیدھی بات کو بھی نہیں سمجھتے۔ فتح مسیح کو یاد رکھنا چاہئے کہ آتھم تمام پادریوں کا منہ کالا کرکے قبر میں داخل ہوچکا ہے۔ اب یہ کالک کا ٹیکہ عیسائیوں کی پیشانی سے کسی طرح اتر نہیں سکتا۔ اگر وہ قسم کھا لیتا اور پھر ایک برس تک نہ مرتا تو عیسائیوں کو اس کی زندگی مفید ہوتی۔ مگر اس نے نہ قسم کھائی نہ نالش کی نہ اپنے جھوٹے تین الزاموں کا ثبوت دیا۔ پس اس نے اپنی عملی کارروائیوں سے ثابت کردیا کہ وہ ضرور ڈرتا رہا۔ پھر جب بیباکی کی طرف رخ کیا تو حسب منشاء الہام الٰہی آخری اشتہار سے سات مہینے تک واصل جہنم ہوگیا۔ اور جیسا کہ خدا کے پاک الہام نے خبر دی تھی ویسا ہی ہوا۔ پس کیا ایسی پیشگوئی جو ایسی صراحت کے ساتھ ظہور پذیر ہوئی جس کا تمام نقشہ خدائے عالم الغیب نے پندرہ برس پہلے اپنے پاک الہام کے ذریعہ سے ظاہر کردیا تھا وہ جھوٹ ٹھہر سکتی ہے۔ بلکہ وہی *** فرقہ جھوٹا ہے جو ایسے کھلے کھلے نشان کی تکذیب کرتا ہے۔
    بالآخر ہم لکھتے ہیں کہ ہمیں پادریوں کے یسوع اور اس کے چال چلن سے کچھ غرض نہ تھی۔ انہوں نے ناحق ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو گالیاں دے کر ہمیں آمادہ* کیا کہ ان کے یسوع کا کچھ تھوڑا سا حال ان پر ظاہرکریں۔ چنانچہ اسی پلید نالائق فتح مسیح نے اپنے خط میں جو میرے نام بھیجا ہے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم
    * اگر پادری اب بھی اپنی پالسی بدل دیں اور عہد کرلیں کہ آئندہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو گالیاں نہیں نکالیں گے تو ہم بھی عہد کریں گے کہ آئندہ نرم الفاظ کے ساتھ ان سے گفتگو ہوگی ور نہ جو کچھ کہیں گے اس کا جواب سنیں گے۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 293
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 293
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/293/mode/1up
    293
    میں لکھوں اور ایک کوئی اور مخالف لکھے تو وہ نہایت ذلیل ہوگا اور مقابلہ نہیں کرسکے گا۔ اور یہی وجہ ہے کہ باوجود اصرار کے مولویوں نے اس طرف رخ نہیں کیا۔ پس یہ ایک عظیم الشان نشان ہے مگر ان کے لئے جو انصاف اور ایمان رکھتے ہیں۔
    اور ایک نشان خدا کے نشانوں میں سے یہ ہے کہ میرے دعویٰ سے تیس۳۰ برس پہلے ایک بندہ صالح نے میری نسبت پیشگوئی کی اور اس پیشگوئی میں میرا نام اور میرے گاؤں کا نام لے کر کہا کہ وہ شخص مسیح موعود ہونے کا دعویٰ کرے گا اور وہ اپنے دعویٰ میں سچا ہوگا اور مولوی لوگ جہالت اور حماقت سے اس کا انکار کریں گے چنانچہ اس نے اس تمام پیشگوئی سے کریم بخش نامی ایک نیک بخت مسلمان کو جو لودیانہ کے قریب ایک گاؤں میں رہنے والا تھا اطلاع دی اور کہا کہ وہ مسیح موعود لدھیانہ میں آئے گا اور نصیحت کی کہ مولویوں کے شور کی کچھ پروا نہ کرنا کہ مولوی اس مخالفت میں جھوٹے ہوں گے۔ چنانچہ جب میں اس دعویٰ کے بعد لدھیانہ میں گیا تو کریم بخش میرے پاس آیا اور صدہا لوگوں کے رو برو بار بار یہ گواہی دی۔ چنانچہ اُس کی طرف سے ایک رسالہ بھی شائع ہوچکا۔ سو یہ بھی ایک نشان الٰہی ہے۔
    اور منجملہ نشانوں کے ایک نشان خسوف و کسوف رمضان میں ہے۔ کیونکہ دار قطنی میں صاف لکھا ہے کہ مہدی موعود کی تصدیق کے لئے خدا تعالیٰ کی طرف سے یہ ایک نشان ہوگا کہ رمضان میں چاند
    کوزانی لکھا ہے اور اس کے علاوہ اور بہت گالیاں دی ہیں۔ پس اسی طرح اس مردار اور خبیث فرقہ نے جو مردہ پرست ہے ہمیں اس بات کے لئے مجبور کردیا ہے کہ ہم بھی ان کے یسوع کے کسی قدر حالات لکھیں۔ اور مسلمانوں کو واضح رہے کہ خدا تعالیٰ نے یسوع کی قرآن شریف میں کچھ خبر نہیں دی کہ وہ کون تھا۔ اور پادری اس بات کے قائل ہیں کہ یسوع وہ شخص تھا جس نے خدائی کا دعویٰ کیا اور حضرت موسیٰ کا نام ڈاکو اور بٹمار رکھا۔ اور آنے والے مقدس نبی کے وجود سے انکار کیا۔ اور کہا کہ میرے بعد سب جھوٹے نبی آئیں گے۔ پس ہم ایسے ناپاک خیال اور متکبر اور راستبازوں کے دشمن کو ایک بھلا مانس آدمی بھی قرار نہیں دے سکتے ۔ چہ جائیکہ اس کو نبی قرار دیں۔ نادان پادریوں کو چاہئے کہ بدزبانی اور گالیوں کا طریق چھوڑ دیں۔ ورنہ نہ معلوم خدا کی غیرت کیا کیا ان کو دکھلائے گی۔ اور ہم اس جگہ فتح مسیح کی سفارش کرتے ہیں کہ بزرگ پادری


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 294
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 294
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/294/mode/1up
    294
    اور سورج کو گرہن لگے گا۔ چنانچہ وہ گرہن لگ گیا۔ اور کوئی ثابت نہیں کرسکتا کہ مجھ سے پہلے کوئی اور بھی ایسا مدعی گذرا ہے جس کے دعویٰ کے وقت میں رمضان میں چاند اور سورج کا گرہن ہوا ہو۔ سو یہ ایک بڑا بھاری نشان ہے جو اللہ تعالیٰ نے آسمان سے ظاہر کیا۔ دار قطنی کی حدیث میں کوئی اغلاق نہیں۔ جس طرح پر خسوف کسوف ظہور میں آیا وہ سراسر حدیث کے الفاظ کے موافق ہے چنانچہ میں نے اسی خسوف کسوف رمضان کی نسبت عربی میں ایک رسالہ لکھا ہے اس میں اس حدیث کی مفصل شرح کر دی گئی ہے اور یہ کہنا کہ اس حدیث میں بعض راویوں پر محدثین نے جرح کیا ہے۔ یہ قول سراسر حماقت ہے۔ کیونکہ یہ حدیث ایک پیشگوئی پر مشتمل تھی جو اپنے وقت پر پوری ہوگئی۔ پس جبکہ حدیث نے اپنی سچائی کو آپ ظاہر کردیا تو اس کی صحت میں کیا کلام ہے۔ ایسے لوگ چار پائے ہیں نہ آدمی جن کے دل میں بعد قیام دلائل صحت پھر بھی شبہ رہ جاتا ہے فرض کیا کہ محدثین کی طرز تحقیق میں اس حدیث کی صحت میں کچھ شبہ رہ گیا تھا۔ مگر دوسرے پہلو سے وہ شبہ رفع ہوگیا۔ محدثین نے اس بات کا ٹھیکہ نہیں لیا کہ جو حدیث ان کی نظر میں قاعدہ تنقید رواۃ کی رو سے کچھ ضعف رکھتی ہو وہ ضعف کسی دوسرے طریق سے دور نہ ہوسکے۔ اس حدیث کو تو کسی شخص نے وضعی قرار نہیں دیا اور اہل سنت اور شیعہ دونوں میں پائی جاتی ہے اور اہل حدیث خوب جانتے ہیں کہ صرف محدثین کا فتویٰ قطعی طور پر کسی حدیث کے صدق یا کذب کا مدار نہیں ٹھہر سکتا۔ بلکہ یہاں تک ممکن ہے کہ ایک حدیث کو محدثین نے وضعی قرار دیا ہو اور اس حدیث کی پیشگوئی اپنے وقت پر پوری ہوجائے اور اس طرح پر اس حدیث کی صحت کھل جائے۔ ہمیں اصل غرض تحقیق صحت سے ہے نہ محدثین کے قواعد سے۔
    پس یہ نہایت بے ایمانی اور بددیانتی ہے کہ جب خدا تعالیٰ کسی اور پہلو سے کسی حدیث کو ظاہر کردے اور اطمینان بخش ثبوت دیدے تب بھی ان ظنون فاسدہ کو نہ چھوڑ یں کہ فلاں شخص نے فلاں راوی کی نسبت یہ شکوک پیش کئے تھے۔ یہ ایسی ہی بات ہے جیسا کہ معتبر راویوں کے بیان سے
    ضرور اس کو اس خطرناک خدمات پادریانہ منصب سے علیحدہ کردیں۔ اور اس کو اس نوکری سے موقوف کردینا سراسر اس پر احسان ہے۔ ورنہ معلوم نہیں کہ اس گندی پلید زبان کا انجام کیا ہوگا۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 295
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 295
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/295/mode/1up
    295
    کسی کی موت ثابت ہو اور پھر وہ شخص جو مردہ قرار دیا گیا ہے حاضر ہوجائے اور اس کے حاضر ہونے پر بھی اس کی زندگی پر اعتبار نہ کریں اور یہ کہیں کہ راوی بہت معتبر ہیں ہم اس کو زندہ نہیں مان سکتے۔ ایسا ہی ان بدبخت مولویوں نے علم تو پڑھا مگر عقل اب تک نزدیک نہیں آئی۔
    اس جگہ اس حکمت کا بیان کرنا بھی فائدہ سے خالی نہیں کہ خدا تعالیٰ نے مہدی موعود کا نشان چاند اور سورج کے خسوف کسوف کو جو رمضان میں ہوا کیوں ٹھہرایا۔ اس میں کیا بھید ہے۔
    سو جاننا چاہیئے کہ خدا تعالیٰ کے علم میں تھا کہ علماء اسلام مہدی کی تکفیر کریں گے۔ اور کفر کے فتوے لکھیں گے چنانچہ یہ پیشگوئی آثار اور احادیث میں موجود ہے کہ ضرور ہے کہ مہدی موعود اپنی قبولیت کے وقت سے پہلے علماء زمانہ کی طرف سے اپنی نسبت کفر کے فتوے سنے اور اس کو کافر اور بے ایمان کہیں اور اگر ممکن ہو تو اس کے قتل کرنے کی تدبیر کریں۔ سو چونکہ علماء امت اور فقراء ملت زمین کے آفتاب اور ماہتاب کی طرح ہوتے ہیں اور انہیں کے ذریعہ سے دنیا کی تاریکی دور ہوتی ہے۔ اس لئے خدا تعالیٰ نے آسمان کے اجرام چاند اور سورج کی تاریکی کو علماء اور فقراء کے دلوں کی تاریکی پر دلیل ٹھہرائی۔ گویا پہلے کسوف خسوف زمین کے چاند اور سورج پر ہوا کہ علماء اور فقراء کے دل تاریک ہوگئے اور پھر اسی تنبیہ کے لئے آسمان پر خسوف کسوف ہوا۔ تامعلوم ہو کہ وہ بلا جس نے علماء اور فقراء کے دلوں پر نازل ہوکر خسوف کسوف کی حالت میں ان کو کردیا آسمان نے اس کی گواہی دی۔ کیونکہ آسمان زمین کے اعمال پر گواہی دیتا ہے۔
    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت میں بھی شق قمر کی یہی حکمت تھی کہ جن کو پہلی کتابوں کے علم کا نور ملا تھا وہ لوگ اس نور پر قائم نہ رہے اور ان کی دیانت اور امانت ٹکڑے ٹکڑے ہوگئی۔ سو اس وقت بھی آسمان کے شق القمر نے ظاہر کردیا کہ زمین میں جو لوگ نور کے وارث تھے انہوں نے تاریکی سے پیار کیا ہے اور اس جگہ یہ بات قابل افسوس ہے کہ مدت ہوئی کہ آسمان کا خسوف کسوف جو رمضان میں ہوا وہ جاتا رہا اور چاند اور سورج دونوں صاف اور روشن ہوگئے مگر ہمارے وہ علماء اور فقرا ء جو شمس العلماء اور بدر العرفاء کہلاتے ہیں وہ آج تک اپنے کسوف خسوف میں گرفتار ہیں اور رمضان میں کسوف خسوف ہونا یہ اس بات کی طرف


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 296
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 296
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/296/mode/1up
    296
    اشارہ تھا کہ رمضان نزول قرآن اور برکات کا مہینہ ہے اور مہدی موعود بھی رمضان کے حکم میں ہے کیونکہ اس کا زمانہ بھی رمضان کی طرح نزول معارف قرآن اور ظہور برکات کا زمانہ ہے سو اس کے زمانہ میں علماء کا اس سے منہ پھیرنا اس کو کافر قرار دینا گویا رمضان میں خسوف کسوف ہونا ہے اگر کسی کو ایسی خواب آوے کہ رمضان میں خسوف کسوف ہوا تو اُس کی یہی تعبیر ہے کہ کسی بابرکت انسان کے زمانہ میں علماء وقت اس کی مخالفت کریں گے اور سبّ اور توہین اور تکفیر سے پیش آویں گے۔ اور وہ شخص موعود مہدی کے نام سے بھی اس لئے نامزد کیا گیا ہے تا اس بات کی طرف اشارہ کیا جائے کہ لوگ اس کو مہدی یعنی ہدایت یافتہ نہیں سمجھیں گے بلکہ کافر ۱وربے دین کہیں گے۔ سو یہ نام پہلے سے بطور ذبّ اور دفع کے مقرر کیا گیا جیسا کہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا نام مذمت کرنے والوں کے رد کے لئے محمدؐ رکھا گیا۔ تا اس بات کی طرف اشارہ ہو کہ اس قابل تعریف نبی کی شریر اور خبیث لوگ مذمت کریں گے مگر وہ محمدؐ ہے یعنی نہایت تعریف کیا گیا نہ کہ مذ ّ مم۔
    اب یہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ حدیث میں دو خسوف کسوف کا وعدہ تھا۔ ایک علماء اور فقراء کے دلوں کا خسوف کسوف اور دوسرے چاند اور سورج کا کسوف خسوف۔ سو زمین کا خسوف کسوف تو علماء اور فقراء نے اپنے ہاتھ سے پورا کیا۔ کیونکہ انہوں نے علم اور معرفت کی روشنی پاکر پھر اس شخص سے عمداً منہ پھیرا جس کو قبول کرنا چاہئے تھا اور ضرور تھا کہ ایسا کرتے کیونکہ لکھا گیا تھا کہ ابتدا میں مہدی موعود کو کافر قرار دیا جائے گا۔ سو انہوں نے مجھے کافر قرار دے کر اس نوشتہ کو پورا کردیا۔ اور دوسرا حصہ آسمان میں پورا ہوا۔
    اس جگہ یہ بھی یاد رہے کہ مہدی کو اسی طرح حدیث میں آل محمد صلی اللہ علیہ وسلم ٹھہرایا گیا جس طرح حدیث میں عیسائیوں کو آل عیسیٰ ٹھہرایا گیا۔
    اب نشان مانگنے والے سوچیں کہ کیا یہ خسوف کسوف نشان نہیں ہے۔ کیا خسوف و کسوف ظاہر نہیں کرتا کہ مہدی موعود پیدا ہوگیا۔ اور وہ وہی ہے جس کی تکذیب کی گئی جس کو کافر ٹھہرایا گیا۔ کیونکہ نشان اسی کی تصدیق کے لئے ہوتا ہے جس کو قبول نہ کیا جائے۔ افسوس ہمارے نادان علماء اور مغرور فقراء نہیں سوچتے کہ آثار اور احادیث میں مہدی موعود کی یہی نشانی تھی کہ پہلے


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 297
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 297
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/297/mode/1up
    297
    اس کو بڑے زور شور سے کافر ٹھہرایا جائے گا۔ اور پھر اُس کی تصدیق کے لئے آسمان پر رمضان میں خسوف کسوف ہوگا۔ سو نہایت صفائی سے یہ نشانی پوری ہوگئی۔ کیا وہ لوگ اب تک متقی اور پرہیزگار کہلاتے ہیں جو اس قدر کھلا کھلا نشان ظاہر ہونے پر بھی حق کی طرف متوجہ نہیں ہوتے۔ ان کے دلوں میں خدا تعالیٰ کا خوف پیدا نہیں ہوتا۔ یہ کیسے ان کے دلوں پر قفل ہیں جنہوں نے ایک ذرہ تصدیق سے کام نہ لیا۔
    اور منجملہ آسمانی نشانوں کے ایک نشان میرزا احمد بیگ ہوشیار پوری کی موت ہے۔ آپ لوگ جانتے ہیں کہ پیشگوئی میں صاف لفظوں میں لکھا گیا تھا کہ وہ اپنی دختر کے روز نکاح سے تین برس تک فوت ہوجائے گا۔ چنانچہ روز نکاح سے ابھی چھ مہینے نہیں گزرے تھے کہ وہ بمقام ہوشیار پور فوت ہوگیا۔ اب سوچو کیا یہ نشان نہیں ہے کیا یہ علم غیب بجز خدا کے اور کسی کو بھی حاصل ہے مگر اس پیشگوئی کا دوسرا حصہ جو اس کے داماد کی موت ہے وہ الہامی شرط کی وجہ سے دوسرے وقت پرجا پڑا اور داماد اس کا الہامی شرط سے اسی طرح متمتع ہوا جیسا کہ آتھم ہوا۔ کیونکہ احمد بیگ کی موت کے بعد اس کے وارثوں میں سخت مصیبت برپا ہوئی۔ سو ضرور تھا کہ وہ الہامی شرط سے فائدہ اٹھاتے۔ اور اگر کوئی بھی شرط نہ ہوتی تاہم وعیدمیں سنت اللہ یہی تھی جیسا کہ یونس کے دنوں میں ہوا۔ پس اس کا داماد تمام کنبہ کے خوف کی وجہ سے اور ان کے توبہ اور رجوع کے باعث سے اس وقت فوت نہ ہوا۔ مگر یاد رکھو کہ خدا کے فرمودہ میں تخلّف نہیں اور انجام وہی ہے جو ہم کئی مرتبہ لکھ چکے ہیں۔ خدا کا وعدہ ہرگز ٹل نہیں سکتا۔ غرض احمد بیگ کی موت بھی خدا کے نشانوں میں سے ایک نشان ہے۔
    اسی طرح بہت امور غیبیہ ہیں جو ظہور میں آئے۔ چنانچہ پنڈت دیانند کی موت کی خبر قبل از وقت دینا ۔دلیپ سنگھ کے اپنے ارادہ سیر ہندوستان میں ناکام رہنے کی خبر قبل از وقت دینا۔ مہرعلی ہوشیار پوری کی مصیبت کی خبر قبل ازوقت دینا۔ یہ ایسے امور ہیں جو صدہا آدمی اس پر گواہ ہیں۔ اور تین ہزار۳۰۰۰ کے قریب وہ اخبار غیب ہیں جن پر وقتاً فوقتاً صحبت میں رہنے والے اطلاع پاتے گئے جن میں سے بہت اب تک موجود ہیں۔ اور میں سچ سچ کہتا ہوں کہ ہر ایک شخص جو کسی مدت معقول تک میری صحبت میں رہا ہے ضرور اس نے کوئی نشان بھی دیکھا ہے۔ ایسا کوئی نہیں


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 298
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 298
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/298/mode/1up
    298
    جو ایک مدت تک میرے پاس رہا ہو اور پھر اس نے کوئی نشان نہ دیکھا ہو اور نہ کوئی خبر غیب سنی ہو۔ میاں عبد الرحیم یا عبد الوحد پسران مولوی عبد اللہ صاحب غزنوی جو اس وقت مجھ کو کافر ٹھہراتے ہیں اور سخت مخالف ہیں ذرہ ان کو قسم دے کر پوچھئے کہ کیا مقام ہوشیار پور میں جس کو گیارہ برس گزر گئے میں نے یہ الہام نہیں سنایا تھاکہ ایتھا المرأۃ توبی توبی فان البلاء علی عقبک یعنی اے عورت(عورت سے مراد احمد بیگ ہوشیار پوری کی بیوی کی والدہ ہے)توبہ توبہ کر کہ تیری دختر اور دخترِ دختر پر بلا نازل ہونے والی ہے۔ سو ایک بلا تو نازل ہوگئی کہ احمد بیگ فوت ہوگیا۔ اور بنت البنت کی بلا باقی ہے جس کو خدا تعالیٰ نہیں چھوڑے گا جب تک پورا نہ کرے۔ مگر چونکہ اس الہام میں توبی کا لفظ توبہ کی شرط کو ظاہر کررہا تھا اور اس شرط کو احمد بیگ کی موت کے بعد اس کے وارثوں نے پورا کردیا اور وہ بہت ڈرے اور اپنے داماد کے لئے دعا اور رجوع میں لگ گئے اس لئے احمد بیگ کے داماد کی موت میں سنت اللہ کے موافق تاخیر ہوگئی کیونکہ وہ خوف جو احمد بیگ کی موت نے ان کے دلوں میں بٹھا دیا وہی توبہ کا باعث ہوا۔ یہ تو ظاہر ہے کہ تجربہ انسان کے دل پر بڑا قوی اثر ڈالتا ہے اور اس کے دل کو خوف سے بھر دیتا ہے سو احمد بیگ کی موت کے بعد ان کا حال ایسا ہی ہوا۔
    اسی طرح شیخ محمد حسین بٹالوی کو حلفاًپوچھنا چاہئے کہ کیا یہ قصہ صحیح نہیں کہ یہ عاجز اس شادی سے پہلے جو دہلی میں ہوئی اتفاقاً اس کے مکان پر موجود تھا اس نے سوال کیا کہ کوئی الہام مجھ کو سناؤ ۔میں نے ایک تازہ الہام جو انہیں دنوں میں ہوا تھا اور اس شادی اور اس کی دوسری جز پر دلالت کرتا تھا اس کو سنایا۔ اور وہ یہ تھا کہ بکرٌ وثیّب۔ یعنی مقدر یوں ہے کہ ایک بکر سے شادی ہوگی اور پھر بعدہ ایک بیوہ سے۔ میں اس الہام کو یاد رکھتا ہوں مجھے امید نہیں کہ محمد حسین نے بھلا دیا ہو۔ مجھے اس کا وہ مکان یاد ہے جہاں کرسی پر بیٹھ کر میں نے اس کو الہام سنایا تھا اور احمد بیگ کے قصہ کا ابھی نام و نشان نہ تھا اور نہ ابھی اس دوسری شادی کا کچھ ذکر تھا۔ پس اگر وہ سمجھے تو سمجھ سکتا ہے کہ یہ خدا کا نشان تھا جس کا ایک حصہ اس نے دیکھ لیا اور دوسرا حصہ جو ثیّب یعنی بیوہ کے متعلق ہے دوسرے وقت میں دیکھ لے گا۔
    پھر ایک اور الہام ہے جو فروری ۱۸۹۶ء میں شائع ہوا تھا۔ اور وہ یہ ہے کہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 299
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 299
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/299/mode/1up
    299
    خدا تین کو چار کرے گا۔ اس وقت ان تین لڑکوں کا جواب موجود ہیں نام و نشان نہ تھا اور اس الہام کے معنی یہ تھے کہ تین لڑکے ہوں گے اور پھر ایک اور ہوگا جو تین کو چار کردے گا۔ سو ایک بڑا حصہ اس کا پورا ہوگیا یعنی خدا نے تین لڑکے مجھ کو اس نکاح سے عطا کئے جو تینوں موجود ہیں صرف ایک کی انتظار ہے جو تین کو چار کرنے والا ہوگا۔ اب دیکھو یہ کیسا بزرگ نشان ہے۔ کیا انسان کے اختیار میں ہے کہ اول افترا کے طور پر تین یا چار لڑکوں کی خبر دے اور پھر وہ پیدا بھی ہو جائیں۔
    پھر ایک اور نشان یہ ہے جو یہ تین لڑکے جو موجود ہیں۔ ہر ایک کے پیدا ہونے سے پہلے اس کے آنے کی خبر دی گئی ہے چنانچہ محمود جو بڑا لڑکا ہے اس کی پیدائش کی نسبت اس سبز اشتہار میں صریح پیشگوئی معہ محمود کے نام کے موجود ہے جو پہلے لڑکے کی وفات کے بارے میں شائع کیا گیا تھا جو رسالہ کی طرح کئی ورق کا اشتہار سبز رنگ کے ورقوں پر ہے۔ اور بشیر جو درمیانی لڑکا ہے اس کی خبر ایک سفید اشتہار میں موجود ہے جو سبز اشتہار کے تین سال بعد شائع کیا گیا تھا اور شریف جو سب سے چھوٹا لڑکا ہے اس کے تولد کی نسبت پیشگوئی ضیاء الحق اور انوار الاسلام میں موجود ہے اب دیکھو کہ کیا یہ خدائے عالم الغیب کا نشان نہیں ہے کہ ہر ایک بشارت کے وقت میں قبل از وقت وہ بشارت دیتا رہا۔
    پھر ایک اور پیشگوئی ہے جو ابھی ظہور میں آئی ہے یعنی وہ جلسہ مذاہب جو لاہو رمیں ہوا تھا اس کی نسبت مجھے پہلے سے خبر دی گئی کہ وہ مضمون جو میری طرف سے پڑھا جائے گا وہ سب مضمونوں پر غالب رہے گا۔ چنانچہ میں نے قبل از وقت اس بارے میں اشتہار دے دیا جو حاشیہ میں* لکھا جاتا ہے
    نقل اشتہار مطابق اصل
    سچائی کے طالبوں کے لئے ایک عظیم الشان خوشخبری
    جلسہ اعظم مذاہب جو لاہور ٹاؤن ہال میں ۲۶۔ ۲۷۔ ۲۸ دسمبر ۱۸۹۶ء کو ہوگا۔ اس میں اس عاجز کا ایک مضمون قرآن شریف کے کمالات اور معجزات کے بارہ میں پڑھا جائے گا۔ یہ وہ مضمون ہے جو انسانی طاقتوں سے برتر اور خدا کے نشانوں میں سے ایک نشان اور خاص


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 300
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 300
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/300/mode/1up
    300
    اور اس الہام کے موافق میرے اس مضمون کی جلسہ مذاہب میں ایسی قبولیت ظاہر ہوئی کہ مخالفوں نے
    اس کی تائید سے لکھا گیا ہے۔ اس میں قرآن شریف کے وہ حقائق اور معارف درج ہیں۔ جن سے آفتاب کی طرح روشن ہو جائے گا کہ درحقیقت یہ خدا کا کلام اور رب العالمین کی کتاب ہے۔ اور جو شخص اس مضمون کو اول سے آخر تک پانچوں سوالوں کے جواب میں سنے گا۔ میں یقین کرتا ہوں کہ ایک نیا ایمان اس میں پیدا ہوگا۔ اور ایک نیا نور اس میں چمک اٹھے گا۔ اور خدا تعالیٰ کے پاک کلام کی ایک جامع تفسیر اس کے ہاتھ آجائے گی۔ یہ میری تقریر انسانی فضولیوں سے پاک اور لاف و گزاف کے داغ سے منزہ ہے مجھے اس وقت محض بنی آدمی کی ہمدردی نے اس اشتہار* کے لکھنے کے لئے مجبور کیا ہے کہ تا وہ قرآن شریف کے حسن و جمال کا مشاہدہ کریں اور دیکھیں کہ ہمارے مخالفوں کا کس قدر ظلم ہے کہ وہ تاریکی سے محبت کرتے اور اس نور سے نفرت رکھتے ہیں۔ مجھے خدائے علیم نے الہام سے مطلع فرمایا ہے کہ یہ وہ مضمون ہے جو سب پر غالب آئے گا۔ اور اس میں سچائی اور حکمت اور معرفت کا وہ نور ہے جو دوسری قومیں بشرطیکہ حاضر ہوں اور اس کو اول سے آخر تک سنیں شرمندہ ہو جائیں گی۔ اور ہرگز قادر نہیں ہوں گے کہ اپنی کتابوں کے یہ کمال دکھلا سکیں۔ خواہ وہ عیسائی ہوں خواہ آریہ خواہ سناتن دھرم والے یا کوئی اور۔ کیونکہ خدا تعالیٰ نے ارادہ فرمایا ہے کہ اس روز اس کی پاک کتاب کا جلوہ ظاہر ہو۔ میں نے عالم کشف میں اس کے متعلق دیکھا کہ میرے محل پر غیب سے ایک ہاتھ مارا گیا اور اس ہاتھ کے چھونے سے اس محل میں سے ایک نور سا طعہ نکلا جو ارد گرد پھیل گیا اور میرے ہاتھوں پر بھی اس کی روشنی پڑی۔ تب ایک شخص جو میرے پاس کھڑا تھا وہ بلند آواز سے بولا کہ اللّٰہ اکبر خربت خیبر۔ اس کی تعبیر یہ ہے کہ اس محل سے میرا دل مراد ہے جو جائے نزول و حلول انوار ہے اور وہ نور قرآنی معارف ہیں اور خیبر سے مراد تمام خراب مذہب ہیں۔ جن میں شرک اور باطل کی ملونی ہے۔ اور انسان کو خدا
    * سوامی شوگن چندر صاحب نے اپنے اشتہار میں مسلمانوں اور عیسائی صاحبان اور آریہ صاحبوں کو قسم دی تھی کہ ان کے نامی علماء اس جلسہ میں اپنے اپنے مذہب کی خوبیاں ضرور بیان فرما ویں۔ سو ہم سوامی صاحب کو اطلاع دیتے ہیں کہ ہم اس بزرگ قسم کی عزت کے لئے آپ کی منشاء کو پورا کرنے کے لئے تیار ہوگئے ہیں۔ اور انشاء اللہ ہمارا مضمون آپ کے جلسہ میں پڑھا جائے گا۔ اسلام وہ مذہب ہے جو خدا کا نام درمیان آنے سے سچے


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 301
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 301
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/301/mode/1up
    301
    بھی اقرر کیا ہے کہ وہ مضمون سب سے اول رہا ہے۔ اور یہ اشتہار الہامی محمد حسین بطالوی اور احمدا للہ اور ثناء اللہ مولویان امرتسری اور عیسائیوں کو بھی قبل ازوقت بھیجا گیا تھا۔
    اب بتلا ویں کیا یہ خدا کا نشان نہیں ہے کہ خدا نے مجھے پہلے سے خبر دی کہ سب پر تیرا ہی مضمون غالب رہے گا۔ پس وہ مضمون جس عظمت کی نگاہ سے سنا گیا۔ اور جس تعظیم سے شہر لاہور میں اس کی دھوم مچ گئی۔ کیا محمد حسین اس سے بے خبر ہے یا ثناء اللہ اس واقعہ سے ناواقف ہے۔ پس یہ بے ایمانی کیسی ہے جو صریح نشانوں
    کی جگہ دی گئی۔ یا خدا کی صفات کو اپنے کامل محل سے نیچے گرا دیا ہے۔ سو مجھے جتلایا گیا کہ اس مضمون کے خوب پھیلنے کے بعد جھوٹے مذہبوں کا جھوٹ کھل جائے گا۔ اور قرآنی سچائی دن بدن زمین پر پھیلتی جائے گی۔ جب تک کہ اپنا دائرہ پورا کرے پھر میں اس کشفی حالت سے الہام کی طرف منتقل کیا گیا۔ اور مجھے یہ الہام ہوا۔
    ان اللّٰہ معک ان اللّٰہ یقوم اینما قمت
    یعنی خدا تیرے ساتھ ہے خدا وہیں کھڑا ہوتا ہے جہاں تو کھڑا ہو۔ یہ حمایت الٰہی کے لئے ایک استعارہ ہے۔
    اب میں زیادہ لکھنا نہیں چاہتا۔ ہر ایک کو یہی اطلاع دیتا ہوں کہ اپنا اپنا حرج بھی کرکے ان معارف کے سننے کے لئے ضرور بمقام لاہور تاریخ جلسہ پر آویں کہ ان کی عقل اور ایمان کو اس سے وہ فائدے حاصل ہوں گے کہ وہ گمان نہیں کرسکتے ہوں گے۔
    والسّلام علٰی من اتّبع الہدٰی
    خاکسار غلام احمد از قادیان ۲۱؍ دسمبر ۱۸۹۶ء
    مسلمان کو کامل اطاعت کی ہدایت فرماتا ہے۔ لیکن اب ہم دیکھیں گے کہ آپ کے بھائی آریوں اور پادری صاحبوں کو ان کے پرمیشر یا یسوع کی عزت کا کس قدر پاس ہے۔ اور وہ ایسے عظیم الشان قدوس کے نام پر حاضر ہونے کے لئے مستعد ہیں یا نہیں۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 302
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 302
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/302/mode/1up
    302
    سے انکار کرتے ہیں۔ کیا اس قدر اخبار غیب*کوئی خود بخود تراش سکتا ہے۔ اور کیا یہ ایک کذاب کی نشانی ہے کہ اس طور سے خدا اس کی تائید کرے اور ایسے عام جلسوں میں جھوٹے دجال کو عزت
    دنیا میں بہت نادان اس دھوکہ میں پڑے ہوئے ہیں کہ وہ اس اعلام غیب کو جو خدا تعالیٰ کے خاص بندوں کو اس کی طرف سے ہوتا ہے بنظر توہین اور تحقیر دیکھتے ہیں۔ بعض جاہل سجادہ نشین اور فقیری اور مولویت کے شتر مرغ الہام کے معارف کو سنتے ہی جلد بول اٹھتے ہیں کہ یہ کچھ حقیقت نہیں۔ یہ تو ہمارے ادنیٰ مریدوں کو بھی ہوا کرتا ہے۔ بعض کہہ دیتے ہیں کہ یہ ابتدائی حالات کا ایک ناقص مرتبہ ہے جس سے آگے گزر جانا چاہئے۔ اور ہم نے اپنی دستگیری سے مریدوں کو اوپر کی طرف کھینچنا ہے۔ یہ کچھ نہیں ہیچ ہے۔
    لیکن جاننا چاہئے کہ یہ سب شیاطین الانس ہیں اور چاہتے ہیں کہ کسی طرح خدا کے نور کو بجھا دیں۔ یہ تو سچ ہے کہ کبھی سچی خواب ادنیٰ مومن یا کافر کو بھی آجاتی ہے اور کوئی ٹوٹا پھوٹا فقرہ الہام کے رنگ میں ہر ایک مومن کے دل میں القا ہوسکتا ہے بلکہ کبھی ایک فاسق بھی تنبیہ یا ترغیب کے طور پر پاسکتا ہے۔ مگر وہ امر جس کو یہ عاجز پیش کرتا ہے یعنی مکالمات الٰہیہ وہ بغیر خاص اور برگزیدہ بندوں کے کسی کو عطا نہیں کیا جاتا۔ یہ تو ظاہر ہے کہ ادنیٰ مشارکت سے کوئی شخص اس لقب کا مستحق نہیں ہوسکتا جو حضرت احدیت کے فضل سے اکمل اور اتم فرد کے لئے مخصوص ہے۔ دنیا کے کمالات کی طرف نظر کرکے دیکھو۔ کیاکسی دیوار پر ایک اینٹ لگانے سے کوئی شخص کامل معماروں میں شمار ہوسکتا ہے یا ایک دوا بتلانے سے ڈاکٹر کہلا سکتا ہے۔ یا عربی یا انگریزی کا ایک لفظ سیکھنے سے اس زبان کا امام تسلیم کیا جاسکتا ہے۔ یوں تو چوہڑوں چماروں اور فاسقوں کو بھی خدا کے پاک نبیوں سے خواب دیکھنے میں مشارکت ہے۔ مگر کیا اس ایک ذرہ سی مشارکت سے تمام فاسق انبیاء کے ہم پایہ اور ہم مرتبہ شمار کئے جائیں گے۔
    یہ جہلاء کی غلطیاں ہیں کہ جو قلت تدبر سے ان کے نفوس امارہ پر محیط ہورہی ہیں۔ ہاں یہ سچ ہے کہ ناتمام صوفیوں بلکہ فاسقوں اور فاجروں اور کافروں سے بھی خدا تعالیٰ کی یہ سنت جاری ہے کہ کبھی وہ سچی خوابیں دیکھتے ہیں۔ بعض وقت کوئی ٹوٹا پھوٹا فقرہ بطور الہام بھی سن لیتے ہیں۔ بعض وقت کشفی طور پر کسی مردہ کو دیکھ لیتے یا کشف قبور کے رنگ میں کسی روح سے ملاقات کرلیتے ہیں۔ مگر وہ ایسے ناتمام نظاروں سے کسی کمال کے وارث نہیں کہلا سکتے۔ اور خدا تعالیٰ ان بدکاروں یا ناتمام فقیروں کو اس لئے رؤیا یا کشف یا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 303
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 303
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/303/mode/1up
    303
    دے اور محمد حسین جیسے راستباز کو اگر وہ راستباز ہے ذلیل اور رو سیاہ کرے۔ کیا یہ خدا کا فعل تھا یا
    الہام کا مزہ چکھاتا ہے کہ تا وہ یقین کرلیں کہ یہ قوت تخمی طور پر ہر ایک میں موجود ہے۔ اور ہر ایک کے لئے ترقی کی راہ کھلی ہے خدا نے کسی کو روکنا نہیں چاہا۔ سو یہ نمائش جو ناتمام فقراء یا فاسقون اور فاجروں کو ہوتی ہے۔ یہ صرف اسی غرض کے لئے ہے کہ تا ان کی ہمتیں مضبوط ہوں۔ اور ان کا شوق بڑھے اور آگے قدم رکھنے کے لئے تیار ہوں۔ اور اس نمائش میں بہت سی اضغاث احلام بھی داخل ہوجاتی ہیں۔
    غرض کمال کی یہ علامت نہیں۔ ہاں صحت استعداد کی کسی قدر علامت ہے۔ اور میں اعلان سے کہتا ہوں کہ جس قدر فقراء میں سے اس عاجز کے مکفر یا مکذب ہیں وہ تمام اس کامل نعمت مکالمہ الٰہیہ سے بے نصیب ہیں اور محض یا وہ گو اور ژاژ خاہیں۔
    اور مکالمہ الٰہیہ کی حقیقت یہ ہے کہ خدا تعالیٰ اپنے نبیوں کی طرح اس شخص کو جو فنا فی النبی ہے اپنے کامل مکالمہ کا شرف بخشے۔ اس مکالمہ میں وہ بندہ جو کلیم اللہ ہو خدا سے گویا آمنے سامنے باتیں کرتا ہے۔ وہ سوال کرتا ہے خدا اس کا جواب دیتا ہے۔ گو ایسا سوال جواب پچاس۵۰ دفعہ واقعہ ہو یا اس سے بھی زیادہ۔ خدا تعالیٰ اپنے مکالمہ کے ذریعہ سے تین۳ نعمتیں اپنے کامل بندہ کو عطا فرماتا ہے۔ اول۔ان کی اکثر دعائیں قبول ہوتی ہیں۔ اور قبولیت سے اطلاع دی جاتی ہے۔ دوم اس کو خدا تعالیٰ بہت سے امور غیبیہ پر اطلاع دیتا ہے۔ سوم۔ اس پر قرآن شریف کے بہت سے علوم حکمیہ بذریعہ الہام کھولے جاتے ہیں۔ پس جو شخص اس عاجز کا مکذب ہوکر پھر یہ دعویٰ کرتا ہے کہ یہ ہنر مجھ میں پایا جاتا ہے میں اس کو خدا تعالیٰ کی قسم دیتا ہوں کہ ان تینوں باتوں میں میرے ساتھ مقابلہ کرے اور فریقین میں قرآن شریف کے کسی مقام کی سات آیتیں تفسیر کے لئے بالاتفاق منظور ہوکر ان کی تفسیر دونوں فریق لکھیں یعنی فریق مخالف اپنے الہام سے اس کے معارف لکھے اور میں اپنے الہام سے لکھوں اور چند ایسے الہام قبل ازوقت وہ پیش کرے جن میں قبولیت دعا کی بشارت ہو۔ اور وہ دعا فوق الطاقت ہو ایسا ہی میں بھی پیش کروں اور چند امور غیبیہ جو آنے والے زمانہ سے متعلق ہیں وہ قبل از وقت ظاہر کرے اور ایسا ہی میں بھی ظاہر کروں اور دونوں فریق کے یہ بیان اشتہارات کے ذریعہ سے شائع ہو جائیں تب ہر ایک کا صدق کذب کھل جائے گا۔ مگر یاد رکھنا چاہئے کہ ہرگز ایسا نہیں کرسکیں گے مکذبین کے دلوں پر خدا کی *** ہے خد ان کو نہ قرآن کا نور دکھلائے گا نہ بالمقابل دعا کی استجابت جو اعلام قبل ازوقت کے ساتھ ہو اور نہ امور غیبیہ پر اطلاع دے گا 3 33 ۔۱؂ پس اب میں نے یہ اشتہار دے دیا ہے جو شخص اس کے بعد سیدھے طریق سے میرے ساتھ مقابلہ نہ کرے اور نہ تکذیب سے باز آوے وہ خدا کی *** فرشتوں کی *** اور تمام صلحاء کی *** کے نیچے ہے۔ وما علی الرسول الَّا البلاغ۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 304
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 304
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/304/mode/1up
    304
    انسان کا منصوبہ۔
    ماسوا اس کے میں دوبارہ حق کے طالبوں کے لئے عام اعلان دیتا ہوں کہ اگر وہ اب بھی نہیں سمجھے تو نئے سرے اپنی تسلی کرلیں۔ اور یاد رکھیں کہ خدا تعالیٰ سے چھ۶ طور کے نشان میرے ساتھ ہیں۔ اول۔ اگر کوئی مولوی عربی کی بلاغت فصاحت میں میری کتاب کا مقابلہ کرنا چاہے گا تو وہ ذلیل ہوگا۔ میں ہر ایک متکبر کو اختیار دیتا ہوں کہ اسی عربی مکتوب کے مقابل پر طبع آزمائی کرے۔ اگر وہ اس عربی کے مکتوب کے مقابل پر کوئی رسالہ بالتزام مقدار نظم و نثر بناسکے اور ایک مادری زبان والا جو عربی ہو قسم کھا کر اس کی تصدیق کرسکے تو میں کاذب ہوں۔ دوم۔ اور اگر یہ نشان منظور نہ ہو تو میرے مخالف کسی سورۃ قرآنی کی بالمقابل تفسیر بناویں یعنی روبرو ایک جگہ بیٹھ کر بطور فال قرآن شریف کھولا جاوے۔ اور پہلی سات آیتیں جو نکلیں ان کی تفسیر َ میں بھی عربی میں لکھوں اور میرا مخالف بھی لکھے۔ پھر اگر میں حقائق معارف کے بیان کرنے میں صریح غالب نہ رہوں تو پھر بھی میں جھوٹا ہوں۔ سوم۔ اور اگر یہ نشان بھی منظور نہ ہو تو ایک سال تک کوئی مولوی نامی مخالفوں میں سے میرے پاس رہے۔ مگر اس عرصہ میں انسان کی طاقت سے برتر کوئی نشان مجھ سے ظاہر نہ ہو تو پھر بھی میں جھوٹا ہوں گا۔ چہارم۔ اور اگر یہ بھی منظور نہ ہو تو ایک تجویز یہ ہے کہ بعض نامی مخالف اشتہار دے دیں کہ اس تاریخ کے بعد ایک سال تک اگر کوئی نشان ظاہر ہو تو ہم توبہ کریں گے اور مصدق ہوجائیں گے۔ پس اس اشتہار کے بعد اگر ایک سال تک مجھ سے کوئی نشان ظاہر نہ ہوا جو انسانی طاقتوں سے بالا تر ہو خواہ پیشگوئی ہو یا اور تو میں اقرار کروں گا کہ میں جھوٹا ہوں۔ پنجم۔ اور اگر یہ بھی منظور نہ ہو تو شیخ محمد حسین بطالوی اور دوسرے نامی مخالف مجھ سے مباہلہ * کرلیں۔ پس اگر
    *حاشیہ۔ مولوی ثناء اللہ امرتسری نے مباہلہ کی دعوت پر اطلاع پاکر اپنے خط میں مولوی عبد الحق غزنوی کے مباہلہ کا ذکر کیا ہے شاید اس ذکر سے اس کا یہ مطلب ہے کہ اس مباہلہ سے عبد الحق پر کوئی بلا نازل نہ ہوئی اور نہ اس طرف کوئی نیک اثر ہوا۔ سو میں اس کو اور اس کے رفیقوں کو اطلاع دیتا ہوں کہ اول تو یہ بات صحیح نہیں ہے کہ اس مباہلہ کے بعد عبد الحق کو کوئی


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 305
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 305
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/305/mode/1up
    305
    مباہلہ کے بعد میری بددعا کے اثر سے ایک بھی خالی رہا تو میں اقرار کروں گا کہ میں جھوٹا ہوں
    واقعی ذلت نہ پہنچی یا ہمیں کوئی واقعی عزت حاصل نہ ہوئی جیسا کہ میں آگے چل کر بیان کروں گا۔ ماسوا اس کے وہ مباہلہ درحقیقت میری درخواست سے نہیں تھا اور نہ میرا اس میں یہ مدعا تھا کہ عبدالحق پر بددعا کروں اور نہ میں نے بعد مباہلہ کبھی اس بات کی طرف توجہ کی۔ اس بات کو اللہ تعالیٰ خوب جانتا ہے کہ میں نے کبھی عبدالحق پر بددعا نہیں کی۔ اور اپنے دل کے جوش کو ہرگز اس طرف توجہ نہیں دیا۔ لیکن اب نااہل مولویوں کا ظلم انتہا سے گزر گیا۔ اس لئے اب میں آسمانی فیصلہ کے لئے خود ہرایک مکفر سے مباہلہ کی درخواست کرتا ہوں۔ اور اس لئے کہ بعد میں شبہات پید انہ ہوں۔ میں نے یہ لازمی شرط ٹھہرا دی ہے کہ جو لوگ مباہلہ کے لئے بلائے گئے ہیں کم سے کم دس۱۰ آدمی ان میں سے مباہلہ کی درخواست کریں تاخدا کی مدد صفائی سے ثابت ہو اور کسی تاویل کی گنجائش نہ رہے اور تا کوئی بعد میں یہ نہ کہے کہ مقابل پر صرف ایک آدمی تھا سو اتفاقاً اس پر کوئی مصیبت آگئی۔ بعض خبیث طبع مولوی جو یہودیت کا خمیر اپنے اندر رکھتے ہیں سچائی پر پردہ ڈالنے کے لئے یہ بھی کہا کرتے ہیں کہ گزشتہ مباہلہ میں عبدالحق کو فتح ہوئی۔ کیونکہ آتھم کے متعلق جو پیشگوئی کی تھی اس میں آتھم نہیں مرا۔ مگر یہ دل کے مجذوم اور اسلام کے دشمن یہ نہیں سمجھتے کہ کب اور کس وقت یہ الہام ظاہر کیا گیا تھا کہ آتھم ضرور میعاد کے اندر مرے گا اور کس اشتہار یا کتاب میں ہم نے لکھا تھا کہ اس عرصہ میں بغیر کسی شرط کے آتھم کی نسبت موت کا حکم ہے دنیا میں سب جانداروں سے زیادہ پلید اور کراہت کے لائق خنزیر ہے مگر خنزیر سے زیاہ پلید وہ لوگ ہیں جو اپنے نفسانی جوش کے لئے حق اور دیانت کی گواہی کو چھپاتے ہیں۔ اے مردار خوار مولویو۔ اور گندی روحو۔ تم پر افسوس کہ تم نے میری عداوت کے لئے اسلام کی سچی گواہی کو چھپایا۔ اے اندھیرے کے کیڑو۔ تم سچائی کی تیز شعاعوں کو کیونکر چھپا سکتے ہو کیا ضرور نہ تھا کہ خدا اس پیشگوئی میں اپنی شرط کا لحاظ رکھتا۔ اے ایمان اور انصاف سے دور بھاگنے والو سچ کہو کہ کیا اس پیشگوئی میں کوئی ایسی شرط نہ تھی جس پر قدم مارنا آتھم کا اس کی موت میں تاخیر ڈال سکتا تھا۔ سو تم جھوٹ مت بولو اور وہ نجاست نہ کھاؤ جو عیسائیوں نے کھائی۔
    آنکھ کھول کر دیکھو کہ یہ پیشگوئی اپنی تمام چمکوں کے ساتھ پوری ہوگئی۔ اب اس پیشگوئی کو ایک پیشگوئی نہ سمجھو بلکہ یہ دو پیشگوئیاں ہیں جو اپنے وقت پر ظہور میں آئیں۔
    (۱) اول وہ پیشگوئی جو براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں درج ہے۔ جس نے آج سے پندرہ برس


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 306
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 306
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/306/mode/1up
    306
    یہ طریق فیصلہ ہیں جو میں نے پیش کئے ہیں۔ اور میں ہر ایک کو خدا تعالیٰ کی قسم دیتا ہوں کہ اب سچے
    پہلے صاف لفظوں میں یہ ظاہر کیا تھا کہ عیسائیوں کا ایک فتنہ برپا ہوگا۔ اور یہودی صفت لوگ ان کے ساتھ ملیں گے اور وہ حق کو چھپانے کے لئے بڑا مکر کریں گے۔ اور بہت ایذا دیں گے آخر صدق ظاہر ہوجائے گا۔ سو وہی صدق تھا جس کی تائید میں پندرہ برس پہلے یہ پیشگوئی کی گئی۔ پھر میں کہتا ہوں کہ وہی صدق تھا جس نے آتھم کو پیشگوئی سننے کے بعد ایک مجرم کی طرح لرزاں ہراساں بنا دیا تھا۔ پھر میں کہتا ہوں کہ وہی صدق تھا جس نے آتھم کو تین۳ جھوٹے بہتانوں کے بنانے کے لئے مجبور کیا۔ پھر میں کہتا ہوں کہ وہی صدق تھا جس نے آتھم کو قسم کھانے سے روکا۔ پھر میں کہتا ہوں کہ وہی صدق تھا جس نے آتھم کو اس ایذا اٹھانے کے بعد نالش کرنے کی جرأت سے ڈرا دیا۔ پھر میں کہتا ہوں کہ وہی صدق تھا جس سے آتھم آخری الہاموں کے موافق آخری اشتہار سے سات مہینے کے اندر تمام پادریوں کا منہ کالا کرکے قبر کے گڑھے میں جاپڑا۔
    آتھم کی پیشگوئی کو اگر اس پیشگوئی کے ساتھ جو پندرہ برس پہلے براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں لکھی گئی تھی اکٹھا کرکے پڑھا جائے تو یہ ایک ایسا اعجاز نمایاں ہے جس سے بڑے بڑے کافروں کے دل نرم ہوسکتے ہیں۔ اور یہ پیشگوئی آفتاب کی طرح چمکتی ہوئی نظر آتی ہے۔ مگر ان مولویوں کو کن سے تشبیہ دوں وہ اُس بیوقوف اندھے سے مشابہت رکھتے ہیں کہ جو آفتاب کے وجود سے منکر ہوگیا تھا اور بڑے زور سے وعظ کرتا تھا کہ آفتاب کے وجود پر کوئی بھی دلیل نہیں۔ تب آفتاب نے اس کو کہا کہ اے مادر زاد اندھے میں کونسی دلیل تجھ کو بتلاؤں کہ تا تو میرے وجود کا قائل ہوجائے۔ سو بہتر ہے کہ تو خدا سے دعا کیا کرتا وہ تجھے آنکھیں بخشے پھر جب تو سوجاکھا ہوجائے گا تو بآسانی مجھے دیکھ لے گا۔
    یہ غضب کی بات ہے کہ جس واقعہ کی خبر خدا نے پندرہ برس پہلے دے دی اور اسی طور پر وہ واقعہ ظہور میں آیا اور اپنی شرط کے موافق پورا ہوا اور پھر دوسرے الہام کے موافق جو اسی زمانہ میں شائع ہوچکا۔ آتھم آخری اشتہار سے سات مہینے کے اندر قبر میں جاپہنچا اور سب مراتب پیشگوئی کے پورے ہوگئے۔ اور اس جھگڑے کے متعلق جو ہم میں اور عیسائیوں میں نہایت زور سے برپا ہوا۔ آج سے تیرہ سو برس پہلے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی خبر دی۔
    یہ سب کچھ ہوا مگر اب تک بعض بے ایمان اور اندھے مولوی اور خبیث طبع عیسائی اس


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 307
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 307
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/307/mode/1up
    307
    دل سے ان طریقوں میں سے کسی طریق کو قبول کریں۔ یا تو میعاد دو ماہ میں جو مارچ ۱۸۹۷ء
    آفتاب ظہور حق سے منکر ہیں۔ مولوی ثناء اللہ صاحب نے جو عبد الحق کے مباہلہ کا ذکر کرکے پھر مجملاً یہ اشارہ کیا ہے کہ آثار نصرت الٰہی بعد مباہلہ عبدالحق کی طرف تھے۔ یہ ایک عظیم الشان سچائی کا خون کیا ہے اور اس قدر ایک گندہ جھوٹ بولا ہے جس سے ایک مومن کا بدن کانپ جاتا ہے۔
    افسوس یہ لوگ مولوی کہلانے کا تو بہت شوق رکھتے ہیں۔ مگر تقویٰ اور دیانت سے ایسے دور ہیں کہ جیسے مشرق سے مغرب۔ اگر ان کلمات سے مولوی ثناء اللہ صاحب کا یہ مطلب ہے کہ عیسائیوں نے پیشگوئی کی میعاد کے بعد امرتسر میں بہت شور مچایا تھا۔ اور ناپاک فرقہ نصرانیوں کا طوائف کی طرح کوچوں اور بازاروں میں ناچتے پھرتے تھے۔ اور اس عاجز کو سب پادری اور ان کے ہم سرشت مولوی اور پلید طبع بعض اخباروں والے گالیاں دیتے تھے اور طرح طرح کی بدزبانی کرتے تھے یہ گویا عبد الحق کے مباہلہ کا اثر تھا۔ تو میں مولوی ثناء اللہ کو یقین دلاتا ہوں کہ ہر ایک جوش اور بدزبانی جس کی واقعات صحیحہ پر بنا نہ ہو اور محض اپنی غلط فہمی اور کو تہ اندیشی ہو اہل حق کی عزت کو اس سے کچھ نقصان نہیں پہنچ سکتا۔ اور نہ کسی مخالف کی اس سے فتح سمجھی جاسکتی ہے بلکہ ایسے لوگوں کی یہ جھوٹی خوشی اخیر پر ان کے لئے ایک *** سے بھرا ہوا عذاب ہوجاتا ہے۔ جیسا کہ جن لوگوں نے ہمارے سید و مولیٰ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو وطن سے نکالا اور بہت سی بے ادبیوں اور شوخیوں کے ساتھ پیش آئے یا فرعون نے جو کئی مرتبہ حضرت موسیٰ کو اپنے دربار سے دھکے دے کر باہر کردیا اور ان کا نام کافر رکھا اور اپنی دانست میں بہت بے عزتی کی ایسا ہی جب حضرت مسیح نے یہودیوں کو ایلیا کے نزول کے بارے میں ان کے خیال کے موافق تسلی بخش جواب نہ دیا تو یہودیوں نے مسیح پر بہت ٹھٹھا مارا اور ان کا نام ملحد رکھا گیا اور اکثر لوگوں نے ان کو مارا اور ان کے منہ پر تھوکا اور کوڑے بھی لگے اور اپنے خیال میں بڑی بے عزتی کی۔ لیکن درحقیقت یہ سب جھوٹی خوشیاں تھیں اور واقعات صحیحہ پر ان کی بنیاد نہ تھی۔ اس لئے نہیں کہہ سکتے کہ ان بے ادبیوں سے ان پاک نبیوں کی کوئی واقعی بے عزتی ہوگئی۔ یا کوئی واقعی فتح ان کے مخالفوں کو میسر آئی۔ مثلاً دیکھو کہ اس زمانہ میں نجاست خوار پادری ہمارے سیدومولیٰ فخر المرسلین خاتم النبین سیّد الاولین والآخرین کی کیسی بے ادبیاں کررہے ہیں۔ ہزاروں گالیاں نکالتے ہیں۔ جھوٹے بہتان لگاتے ہیں۔ نعوذ باللّٰہ۔ ڈاکو، راہزن، زانی اپنی شیطانی سیرت سے نام رکھتے


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 308
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 308
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/308/mode/1up
    308
    کی دس۱۰ تاریخ تک مقرر کرتا ہوں۔ اس عربی رسالہ کا ایسا ہی فصیح بلیغ جواب چھاپ کر شائع کریں یا
    ہیں۔ جیسا کہ ابھی ایک پلید ذریت شیطان فتح مسیح نام متعین فتح گڈھ نے اسی قسم کی آنجناب کی نسبت بے ادبیان کیں۔ مگر کیا ان بدکاروں نجاست خواروں کی بے ادبیوں سے جو زندہ خدا کو چھوڑ کر ایک ناچیز مردہ کی پوجا میں لگ گئے ہیں۔ اس آفتاب ہدایت کی شان میں کچھ فرق آگیا؟ نہیں۔ بلکہ یہ تمام زیادتیاں انہیں پر حسرتیں ہیں۔
    پس اسی طرح اگر اندھے پادریوں نے یا یک چشم مولویوں نے آتھم کے مقدمہ کی حقیقت کو اچھی طرح نہ سمجھا اور بدزبانی کی تو اس غلط فہمی کی واقعی ذلت انہیں کو پہنچی اور اس خطا کی سیاہی انہیں کے منہ پر لگی اور سچائی کے چھوڑنے کی *** انہیں پر برسی۔ چنانچہ صدہا آدمیوں نے بعد اس کے رو رو کے توبہ کی کہ ہم غلطی پر تھے۔ غرض کسی جھوٹی خوشی سے کسی پر سچا الزام نہیں آسکتا اور نہ جھوٹے الزام سے کوئی واقعی دھبّہ کسی کی عزت کو لگ سکتا ہے اور نہ اس سے کسی کی واقعی فتح سمجھی جاسکتی ہے۔ بلکہ وہ انجام کے لحاظ سے ان لوگوں پر *** کا داغ ہے جنہوں نے ایسی جھوٹی خوشی کی۔
    پس آتھم کی نسبت جس قدر پلیدوں اور نابکاروں نے خوشیاں کیں۔ اب وہی خوشیاں ندامت اور حسرت کا رنگ پکڑ گئیں۔
    اب ڈھونڈو آتھم کہاں ہے۔ کیا پیشگوئی کے الفاظ کے مطابق وہ قبر میں داخل نہیں ہوا۔ کیا وہ ہاویہ میں نہیں گرایا گیا۔
    اے اندھو!میں کب تک تمہیں بار بار بتلاؤں گا۔ کیا ضرور نہ تھا کہ خدا اپنی شرط کے موافق اپنے پاک الہام کو پورا کرتا۔ آتھم تو اسی وقت مر گیا تھا جبکہ میری طرف سے چار ہزار کے انعام کے ساتھ متواتر اس پر حجت پوری ہوئی اور وہ سر نہ اٹھا سکا۔ پھر خدا نے اس کو نہ چھوڑا جب تک قابض ارواح کے اس کو سپرد نہ کردیا۔
    پیشگوئی ہر ایک پہلو سے کھل گئی۔ اب بھی اگر جہنم کو اختیار کرنا ہے تو میں عمداً گرنے والے کو پکڑ نہیں سکتا۔ یہ تمام واقعات ایسے ہیں کہ ان سب پر پوری اطلاع پاکر ایک متقی کا بدن کانپ جاتا ہے۔ اور پھر وہ خدا سے شرم کرتا ہے کہ ایسی کھلی کھلی پیشگوئی سے انکار کرے۔ میں یقیناً جانتا ہوں کہ اگر کوئی میرے سامنے خدا تعالیٰ کی قسم کھا کر اس پیشگوئی کے صدق سے انکار کرے تو خدا تعالیٰ اس کو بغیر سزا نہیں چھوڑے گا۔ اول چاہئے کہ وہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 309
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 309
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/309/mode/1up
    309
    بالمقابل ایک جگہ بیٹھ کر زبان عربی میں میرے مقابل میں سات آیت قرآنی کی تفسیر لکھیں اور یا ایک سال تک
    ان تمام واقعات سے اطلاع پاوے تا اس کی بے خبری اس کی شفیع نہ ہو۔ پھر بعد اس کے قسم کھاوے کہ یہ خدا تعالیٰ کی طرف سے نہیں اور جھوٹی ہے۔ پھر اگر وہ ایک سال تک اس قسم کے وبال سے تباہ نہ ہو جائے اور کوئی فوق العادت مصیبت اس پر نہ پڑے تو دیکھو کہ میں سب کو گواہ کرکے کہتا ہوں کہ اس صورت میں میں اقرار کروں گا کہ ہاں میں جھوٹا ہوں۔ اگر عبدالحق اس بات پر اصرار کرتا ہے تو وہی قسم کھاوے اور اگر محمد حسین بطالوی اس خیال پر زور دے رہا ہے تو وہی میدان میں آوے۔ اور اگر مولوی احمد اللہ امرتسری یا ثناء اللہ امرتسری ایساہی سمجھ رہا ہے تو انہیں پر فرض ہے کہ قسم کھانے سے اپنا تقویٰ دکھلاویں اور یقیناً یاد رکھو کہ اگر ان میں سے کسی نے قسم کھائی کہ آتھم کی نسبت پیشگوئی پوری نہیں ہوئی اور عیسائیوں کی فتح ہوئی تو خدا اس کو ذلیل کرے گا۔ روسیاہ کرے گا۔ اور *** کی موت سے اس کو ہلاک کرے گا کیونکہ اس نے سچائی کو چھپانا چاہا جو دین اسلام کے لئے خدا کے حکم اور ارادہ سے زمین پر ظاہر ہوئی۔
    مگر کیا یہ لوگ قسم کھالیں گے؟ ہرگز نہیں۔ کیونکہ یہ جھوٹے ہیں۔ اور کتوں کی طرح جھوٹ کا مردار کھا رہے ہیں۔
    اب اگر کوئی یہ سوال کرے کہ اگرچہ عبد الحق کے مباہلہ میں اس طرف سے کسی بددعا کا ارادہ نہ کیا گیا ہو۔ مگر جو صادق کے سامنے مباہلہ کے لئے آیا ہو۔ کسی قدر تو بعد مباہلہ ایسے امور کا پایا جانا چاہئے جن پر غور کرنے سے اس کی ذلت اور نامرادی پائی جائے اور اپنی عزت دکھلائی دے۔
    سو جاننا چاہئے کہ وہ امور بہ تفصیل ذیل ہیں جو بحکم 3 ۱؂ ہماری عزت کے موجب ہوئے۔ اوّل۔ آتھم کی نسبت جو پیشگوئی کی گئی تھی وہ اپنے واقعی معنوں کے رو سے پوری ہوگئی۔ اور اس دن سے وہ پیشگوئی بھی پوری ہوئی جو پندرہ برس پہلے براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں لکھی گئی تھی۔ آتھم اصل منشاء الہام کے مطابق مرگیا اور تمام مخالفوں کا منہ کالا ہوا۔ اور ان کی تمام جھوٹی خوشیاں خاک میں مل گئیں۔ اس پیشگوئی کے واقعات پر اطلاع پاکر صدہا دلوں کا کفر ٹوٹا اور ہزاروں خط اس کی تصدیق کے لئے پہنچے۔ اور مخالفوں اور مکذبوں پر وہ *** پڑی جو اب دم نہیں مارسکتے۔ دوسرا وہ امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت کا موجب ہوا وہ ان عربی رسالوں کا مجموعہ ہے جو مخالف مولویوں اور پادریوں کے ذلیل کرنے کے لئے لکھا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 310
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 310
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/310/mode/1up
    310
    میرے پاس نشان دیکھنے کے لئے رہیں اور یا اشتہار شائع کرکے اپنے ہی گھر میں میرے نشان کی
    گیا تھا اور انہیں میں سے یہ عربی مکتوب ہے جواب نکلا۔ کیا عبدالحق اور کیا اس کے دوسرے بھائی ان رسائل کے مقابل پر مرگئے اور کچھ بھی لکھ نہ سکے اور دنیا نے یہ فیصلہ کردیا کہ عربی دانی کی عزت اسی شخص یعنی اس راقم کے لئے مسلّم ہے جس کو کافر ٹھہرا یاگیا ہے اور یہ سب مولوی جاہل ہیں۔
    اب سوچو کہ یہ عزت کی تعریفیں مجھ کو کس وقت ملیں۔ کیا مباہلہ کے بعد یا اس کے پہلے۔ سو یہ ایک مباہلہ کا اثر تھا کہ خدا نے ظاہر کیا۔ اسی وقت میں خدا نے شیخ محمد حسین بطالوی کا وہ الزام کہ اس شخص کو عربی میں ایک صیغہ نہیں آتا میرے سر پر سے اتارا۔ اور محمد حسین اور دوسرے مخالفین کی جہالت کو ظاہر کیا۔ فالحمد للّٰہ علٰی ذالک۔
    تیسرا وہ امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت کا موجب ہوا وہ قبولیت ہے جو مباہلہ کے بعد دنیا میں کھل گئی۔ مباہلہ سے پہلے میرے ساتھ شاید تین چار سو آدمی ہوں گے اور اب آٹھ ہزار سے کچھ زیادہ وہ لوگ ہیں جو اس راہ میں جاں فشاں ہیں۔ اور جس طرح اچھی زمین کی کھیتی جلد جلد نشوونما پکڑتی اور بڑھتی جاتی ہے ایسا ہی فوق العادت طور پر اس جماعت کی ایک ترقی ہورہی ہے۔ نیک روحیں اس طرف دوڑتی چلی آتی ہیں۔ اور خدا زمین کو ہماری طرف کھینچتا چلا آتا ہے۔ مباہلہ کے بعد ہی ایک ایسی عجیب قبولیت پھیلی ہے کہ اس کو دیکھ کر ایک رقت پیدا ہوتی ہے۔ ایک دو اینٹ سے اب ایک محل طیار ہوگیا ہے۔ اور ایک دو قطرہ سے اب ایک نہر معلوم ہوتی ہے۔ ذرہ آنکھیں کھولو اور پنجاب اور ہندوستان میں پھرو۔ اب اکثر جگہ ہماری جماعتیں پاؤ گے۔ فرشتے کام کررہے ہیں اور دلوں میں نور ڈال رہے ہیں۔ سو دیکھو مباہلہ کے بعد کیسی عزت ہم کو ملی۔ سچ کہو کیا یہ خدا کا فعل ہے یا انسان کا۔
    چوتھا وہ امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت کا موجب ہوا۔ رمضان میں خسوف کسوف ہے۔ کتب حدیث میں صدہا برسوں سے یہ لکھا ہوا چلا آتا تھا کہ مہدی کی تصدیق کے لئے رمضان میں خسوف کسوف ہوگا۔ اور آج تک کسی نے نہیں لکھا کہ پہلے اس سے کوئی ایسا مہدویت کا مدعی ظاہر ہوا تھا جس کو خدا نے یہ عزت دی ہو کہ اس کے لئے رمضان میں خسوف کسوف ہوگیا ہو۔ سو خدا نے مباہلہ کے بعد یہ عزت بھی میرے نصیب کی۔
    اے اندھو! اب سوچو کہ مباہلہ کے بعد یہ عزت کس کو ملی۔ عبد الحق تو میری ذلت کے لئے دعائیں کرتا تھا۔ یہ کیا واقعہ پیش آیا کہ آسمان بھی مجھے عزت دینے کے لئے جھکا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 311
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 311
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/311/mode/1up
    311
    ایک برس تک انتظار کریں۔ اور یا مباہلہ کرلیں۔ششم اور اگران باتوں میں سے کوئی بھی نہ کریں تو مجھ سے
    کیا تم میں ایک بھی سوچنے والا نہیں جو اس بات کو سوچے۔ کیا تم میں ایک بھی دل نہیں جو اس بات کو سمجھے۔ زمین نے عزت دی۔ آسمان نے عزت دی اور قبولیت پھیل گئی۔
    پانچواں وہ امر جو مباہلہ کے بعد میرے لئے عزت کا موجب ہوا۔ علم قرآن میں اتمام حجت ہے۔ میں نے یہ علم پاکر تمام مخالفوں کو کیا عبد الحق کا گروہ اور کیا بطالوی کا گروہ۔ غرض سب کو بلند آواز سے اس بات کے لئے مدعو کیا کہ مجھے علم حقائق اور معارف قرآن دیا گیا ہے۔ تم لوگوں میں سے کسی کی مجال نہیں کہ میرے مقابل پر قرآن شریف کے حقائق و معارف بیان کرسکے۔سو اس اعلان کے بعد میرے مقابل ان میں سے کوئی بھی نہ آیا۔ اور اپنی جہالت پر جو تمام ذلتوں کی جڑ ہے انہوں نے مہر لگا دی۔ سو یہ سب کچھ مباہلہ کے بعد ہوا۔ اور اسی زمانہ میں کتاب کرامات الصادقین لکھی گئی۔ اس کرامت کے مقابل پر کوئی شخص ایک حرف بھی نہ لکھ سکا۔ تو کیا اب تک عبد الحق اور اس کی جماعت ذلیل نہ ہوئی۔ اور کیا اب تک یہ ثابت نہ ہوا کہ مباہلہ کے بعد یہ عزت خدا نے مجھے دی۔
    چھٹا امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت اور عبد الحق کی ذلت کا موجب ہوا یہ ہے کہ عبد الحق نے مباہلہ کے بعد اشتہار دیا تھا کہ ایک فرزند اس کے گھر میں پیدا ہوگا۔ اور میں نے بھی خدا تعالیٰ سے الہام پاکر یہ اشتہار انوار الاسلام میں شائع کیا تھا کہ خدا تعالیٰ مجھے لڑکا عطا کرے گا۔ سو خدا تعالیٰ کے فضل اور کرم سے میرے گھر میں تو لڑکا پیدا ہوگیا۔ جس کا نام شریف احمد ہے اور قریباً پونے دو برس کی عمر رکھتا ہے۔ اب عبد الحق کو ضرور پوچھنا چاہئے کہ اس کا وہ مباہلہ کی برکت کا لڑکا کہاں گیا۔ کیا اندر ہی اندر پیٹ میں تحلیل پاگیا یا پھر رجعت قہقری کرکے نطفہ بن گیا۔ کیا اس کے سوا کسی اور چیز کا نام ذلت ہے کہ جو کچھ اس نے کہا وہ پورا نہ ہوا۔ اور جو کچھ میں نے خدا کے الہام سے کہا خدا نے اس کو پورا کردیا۔ چنانچہ ضیاء الحق میں بھی اسی لڑکے کا ذکر لکھا گیا ہے۔
    ساتواں امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت اور قبولیت کا باعث ہوا خدا کے راستباز بندوں کا وہ مخلصانہ جوش ہے جو انہوں نے میری خدمت کے لئے دکھلایا۔ مجھے کبھی یہ طاقت نہ ہوگی کہ میں خدا کے ان احسانات کا شکر ادا کرسکوں جو روحانی اور جسمانی طور پر مباہلہ کے بعد میرے وارد حال ہوگئے۔ روحانی انعامات کا نمونہ میں لکھ چکا


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 312
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 312
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/312/mode/1up
    312
    اور میری جماعت سے سا۷ت سال تک اس طور سے صلح کرلیں کہ تکفیر اور تکذیب اور بدزبانی سے ُ منہ
    ہوں یعنی یہ کہ خدا تعالیٰ نے مجھے وہ علم قرآن اور علم زبان محض اعجاز کے طور پر بخشا کہ اس کے مقابل پر صرف عبد الحق کیا بلکہ کل مخالفوں کی ذلت ہوئی۔ ہر ایک خاص و عام کو یقین ہوگیا کہ یہ لوگ صرف نام کے مولوی ہیں گویا یہ لوگ مرگئے۔ عبد الحق کے مباہلہ کی نحوست نے اس کے اور رفیقوں کو بھی ڈبویا۔
    اور جسمانی نعمتیں جو مباہلہ کے بعد میرے پر وارد ہوئیں وہ مالی فتوحات ہیں۔ جو اس درویش خانہ کے لئے خدا تعالیٰ نے کھول دیں۔ مباہلہ کے روز سے آج تک پندرہ ہزار کے قریب فتوح غیب کا روپیہ آیا جو اس نے سلسلہ کے ربانی مصارف میں خرچ ہوا۔ جس کو شک ہو وہ ڈاک خانہ کی کتابوں کو دیکھ لے اور دوسرے ثبوت ہم سے لے لے۔ اور رجوع خلائق کا اس قدر مجمع بڑھ گیا کہ بجائے اس کے کہ ہمارے لنگر میں ساٹھ یا ستر۷۰ روپیہ ماہواری کا خرچ ہوتا تھا۔ اب اوسط خرچ کبھی پانچ سو کبھی چھ سو ماہواری تک ہوگیا اور خدا نے ایسے مخلص اور جان فشان ارادتمند ہماری خدمت میں لگا دیئے کہ جو اپنے مال کو اس راہ میں خرچ کرنا اپنی سعادت دیکھتے ہیں۔ چنانچہ منجملہ ان کے حِبّی فِی اللّٰہ حاجی سیٹھ عبدالرحمن اللہ رکھا صاحب تاجر مدراس ہیں۔ جو اس رسالہ کے لکھنے کے وقت بھی اس جگہ موجود ہیں۔ اور مدراس سے دور دراز سفر کرکے میرے پاس تشریف لائے ہوئے ہیں۔ سیٹھ صاحب موصوف مباہلہ کے اثر کا ایک اول نمونہ ہیں۔ جنہوں نے کئی ہزار روپیہ ہمارے سلسلہ کی راہ میں محض للہ لگا دیا ہے۔ اور برابر ایسی سرگرمی سے خدمت کررہے ہیں کہ جب تک انسان یقین سے نہ بھر جائے اس قدر خدمت نہیں کرسکتا۔ وہ ہمارے درویش خانہ کے مصارف کے اول درجہ کے خادم ہیں اور آج تک یکمشت رقوم کثیرہ اس راہ میں دیتے رہے ہیں۔ علاوہ اس کے میں دیکھتا ہوں کہ انہوں نے ایک سو روپیہ ماہواری اعانت کے طور پر اپنے ذمہ واجب کررکھا ہے۔ مباہلہ کے بعد ان کے مال سے جس قدر مجھے مدد پہنچی ہے اور پہنچ رہی ہے میں اس کی نظیر نہیں دیکھتا۔ یہ خدا تعالیٰ کی رحمت ہے کہ اس نے اس درجہ کی محبت دلوں میں ڈال دی۔ یہ حاجی سیٹھ عبد الرحمن صاحب وہی ہیں جو آتھم کو قسم دینے کے وقت اس بات کے لئے تیار تھے کہ اگر آتھم قسم پر روپیہ طلب کرے تو اپنے پاس سے دس ہزار روپیہ تک اس کے پاس جمع کرا دیں۔
    ایسا ہی مباہلہ کے بعد حِبّی فِی اللّٰہ شیخ رحمت اللہ صاحب نے مالی اعانت سے بہت سا بوجھ ہمارے درویش خانہ کا اٹھایا ہے۔ میں خیال کرتا ہوں کہ سیٹھ صاحب موصوف


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 313
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 313
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/313/mode/1up
    313
    بند رکھیں۔ اور ہر ایک کو محبت اور اخلاق سے ملیں اور قہرالٰہی سے ڈر کر ملاقاتوں میں مسلمانوں
    سے بعد نمبر دوم پر شیخ صاحب ہیں۔ جو محبت اور اخلاص سے بھرے ہوئے ہیں۔ شیخ صاحب موصوف اس راہ میں دو ہزار سے زیادہ روپیہ دے چکے ہوں گے۔ اور ہر ایک طور سے وہ خدمت میں حاضر ہیں۔ اور اپنی طاقت اور وسعت سے زیادہ خدمت میں سرگرم ہیں۔
    ایسا ہی بعض میرے مخلص دوستوں نے مباہلہ کے بعد اس درویش خانہ کے کثرت مصارف کو دیکھ کر اپنی تھوڑی تھوڑی تنخواہوں میں اس کے لئے حصہ مقرر کر دیا ہے۔ چنانچہ میرے مخلص دوست منشی رستم علی صاحب کورٹ انسپکٹر گورداسپورہ تنخواہ میں سے تیسرا حصہ یعنی بیس۲۰ روپیہ ماہوار دیتے ہیں۔
    ہماری عزیز جماعت حیدر آباد کی یعنی مولوی سید مردا ن علی صاحب اور مولوی سید ظہور علی صاحب اور مولوی عبد الحمید صاحب دس دس روپیہ اپنی تنخواہ میں سے دیتے ہیں۔ اور اسی طرح مفتی محمد صادق صاحب بھیروی اور منشی روڑا صاحب کپور تھلہ اور ان کے رفیق اور ڈاکٹر خلیفہ رشید الدین صاحب چکراتہ اور ڈاکٹر بوڑیخاں صاحب قصور۔ اور سید ناصر شاہ صاحب سب اوور سیر۔ اور حکیم فضل الدین صاحب بھیروی ۱؂ اور خلیفہ نور دین صاحب جموں۲؂ سب بدل و جان اس راہ میں مصروف ہیں۔ ایسا ہی ہماری مخلص اور محب جماعت سیالکوٹ یہ تمام محبیّن اپنی طاقت سے زیادہ خدمت میں مصروف ہیں۔ اسی طرح محبی انوار حسین صاحب رئیس شاہ آباد بدل و جان خدمت میں لگے ہوئے ہیں۔
    ایسا ہی ہمارے دلی محب مولوی محمد احسن صاحب امروہی جو اس سلسلہ کی تائید کے لئے عمدہ عمدہ تالیفات میں سرگرم ہیں۔ اور صاحبزادہ پیر جی سراج الحق صاحب نے تو ہزاروں مریدوں سے قطع تعلق کرکے اس جگہ کی درویشانہ زندگی قبول کی۔ اور میاں عبد اللہ صاحب سنوری اور مولوی برہان الدین صاحب جہلمی۔ اور مولوی مبارک علی صاحب سیالکوٹی۔ اور قاضی ضیاء الدین صاحب قاضی کوٹی۔ اور منشی چودہری نبی بخش صاحب بٹالہ ضلع گورداسپورہ۔ اور منشی جلال الدین صاحب بلانی وغیرہ احباب اپنی اپنی طاقت کے موافق خدمت میں لگے ہوئے ہیں۔ میں اپنی جماعت کے محبت اور اخلاص پر تعجب کرتا ہوں کہ ان میں سے نہایت ہی کم معاش والے جیسے میاں جمال الدین اور خیر الدین اور امام الدین کشمیری میرے گاؤں سے قریب رہنے والے ہیں وہ تینوں غریب بھائی بھی جو شاید تین آنہ یا چار آنہ روز مزدوری کرتے ہیں۔ سرگرمی سے ماہوار چندہ میں شریک ہیں۔ اُن کے دوست میاں عبدالعزیز پٹواری کے اخلاص سے بھی مجھے تعجب ہے کہ باوجود قلت معاش کے ایک دن
    حکیم صاحب مال اور جان سے اس راہ میں ایسے مصروف ہیں کہ گویا محو ہیں۔ ۲؂ اور خلیفہ نور دین صاحب علاوہ دائمی اعانت کے
    ابھی پانچ سو3 روپیہ نقد بطور امداد دے چکے ہیں۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 314
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 314
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/314/mode/1up
    314
    کی عادت کے طور پر پیش آویں۔ ہر ایک قسم کی شرارت اور خباثت کو چھوڑ دیں۔ پس اگر ان سات سال
    سو روپیہ دے گیا کہ میں چاہتا ہوں کہ خدا کی راہ میں خرچ ہوجائے۔ وہ سو روپیہ شاید اس غریب نے کئی برسوں میں جمع کیا ہوگا۔ مگر للّہی جوش نے خدا کی رضا کا جوش دلایا۔*
    پس یہ خدا کی رحمت اور خدا کا فضل ہے جو اس نے ہمیں ان تکالیف سے بچایا۔ جن میں ہمارے مخالف گرفتار ہیں۔ میں اس واحد لاشریک کی قسم کھاکر کہہ سکتا ہوں کہ اگرچہ مباہلہ سے پہلے بھی وہ ہمیشہ میرا متکفل رہا مگر مباہلہ کے بعد کچھ ایسے برکات روحانی اور جسمانی نازل ہوئے کہ پہلی زندگی میں َ میں ان کی نظیر نہیں دیکھتا۔
    آٹھواں امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت زیادہ کرنے کے لئے ظہور میں آیا۔ کتاب ست بچن کی تالیف ہے۔ اس کتاب کی تالیف کے لئے خدا تعالیٰ نے مجھے وہ سامان عطا کئے جو تین سو برس سے کسی کے خیال میں بھی نہیں آئے تھے میری یہ کتاب سولہ لاکھ سکھ صاحبان کے لئے ایسی ایک لطیف دعوت ہے جس سے میں امید کرتا ہوں کہ ان کے دلوں پر بہت اثر پڑے گا۔ میں اس کتاب میں باوا نانک صاحب کی نسبت ثابت کرچکا ہوں کہ باوا صاحب درحقیقت مسلمان تھے اور لا الہ الا اللّہ محمد رسول اللّہ آپ کا ورد تھا۔ آپ بڑے صالح آدمی تھے۔ آپ نے دو مرتبہ حج بھی کیا۔ اور اولیاء اسلام کی قبور پر اعتکاف بھی کرتے رہے۔ جنم ساکھیوں میں آپ کے وصایا میں اسلام اور توحید اور نماز روزہ کی تاکید پائی جاتی ہے۔ آپ نماز کے بہت پابند تھے اور بنفس نفیس خود بانگ بھی دیا کرتے تھے آخری شادی آپ کی ایک نیک بخت مسلمان کی لڑکی سے ہوئی تھی۔ جس سے سمجھا جاتا ہے کہ آپ نے بدل مسلمانوں کے ساتھ تعلق رشتہ بھی پیدا کر لیاتھا۔ اور اسی کتاب میں لکھا ہے کہ آپ کی بھاری یادگار وہ چولہ ہے جس پر کلمہ شریف اور قرآن شریف کی بہت سی آیتیں لکھی ہوئی ہیں۔ آپ نے یادگار کے طور پر گرنتھ کو نہیں چھوڑا۔ اور نہ اس کے جمع کرنے کے لئے کوئی وصیت کی صرف اس چولہ کو چھوڑا جس پر قرآن شریف لکھا ہوا تھا۔ اور جس پر جلی قلم سے یہ لکھا ہوا تھا۔ انّ الدّین عند اللّٰہ الاسلام۔ یعنی سب دین جھوٹے ہیں مگر اسلام۔ پس یہ کتاب جو بعد مباہلہ تیار ہوئی۔ یہ وہ عطیّہ ر ّ بانی ہے جو مجھ کو ہی عطا کیا گیا۔ اور خدا نے اس تبلیغ کا ثواب مجھ کو ہی عطا فرمایا۔
    نواں امر جو مباہلہ کے بعد میری عزت کے زیادہ ہونے کا موجب ہوا یہ ہے کہ اس
    * ہمارے دلی محب صاحبزادہ افتخار احمد خلف رشید حاجی منشی احمد جان صاحب جو لدھیانہ کے مشاہیر مشایخ میں سے تھے اور صدہا مرید رکھتے تھے جن کو مجھ سے بہت تعلق محبت تھا وہ یعنی صاحبزادہ صاحب موصوف اپنے وطن سے گویا ہجرت کرکے معہ اپنے تمام عیال اور اپنے بھائی میاں منظور محمد کے میرے پاس ہیں اور ہریک خدمت میں حاضر ہیں گویا اپنی زندگی اس راہ میں وقف کررہے ہیں۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 315
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 315
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/315/mode/1up
    315
    میں میری طرف سے خدا تعالیٰ کی تائید سے اسلام کی خدمت میں نمایاں اثر ظاہر نہ ہوں اور جیسا کہ مسیح کے
    عرصہ میں آٹھ ہزار کے قریب لوگوں نے میرے ہاتھ میں بیعت کی اور بعض نے قادیان پہنچ کر اور بعض نے بذریعہ خط توبہ کا اقرار کیا۔ پس میں یقیناً جانتا ہوں کہ اس قدر بنی آدم کی توبہ کا ذریعہ جو مجھ کو ٹھہرایا گیا یہ اس قبولیت کا نشان ہے جو خدا کی رضا مندی کے بعد حاصل ہوتی ہے اور میں دیکھتا ہوں کہ میری بیعت کرنے والوں میں دن بدن صلاحیت اور تقویٰ ترقی پذیر ہے۔ اور ایام مباہلہ کے بعد گویا ہماری جماعت میں ایک اور عالم پیدا ہوگیا ہے۔ میں اکثر کو دیکھتا ہوں کہ سجدہ میں روتے اور تہجد میں تضرع کرتے ہیں۔ ناپاک دل کے لوگ ان کو کافر کہتے ہیں۔ اور وہ اسلام کا جگر اور دل ہیں۔ میں دیکھتا ہوں کہ ہمارے نو عمر دوست جیسا کہ خواجہ کمال الدین بی۔ اے بڑی سرگرمی سے دین کی اشاعت میں کوشش کر رہے ہیں۔ ان کے چہرہ پر نیک بختی کے نشان پاتا ہوں۔ وہ دین کے لئے سچا جوش اپنے دل میں رکھتے ہیں۔ نمازوں میں خشوع ظاہر کرتے ہیں۔ ایسا ہی ہمارے نو عمر دوست میرزا یعقوب بیگ و میرزا ایوب بیگ جوان صالح ہیں۔ بارہا میں نے ان کو نماز میں روتے دیکھا ہے۔
    غرض یہ سب اس راہ میں فدا ہو رہے ہیں۔ ایسا ہی ہمارے محب مخلص میرزا خدا بخش صاحب اس راہ میں وہ صدق رکھتے ہیں کہ جس کے بیان کرنے کے لئے الفاظ نہیں۔ اور ہمارے مخلص دوست منشی زین الدین محمد ابراہیم صاحب انجینئر بمبئی وہ ایمانی جوش رکھتے ہیں کہ میں گمان نہیں کرسکتا کہ تمام بمبئی میں ان کا کوئی نظیر بھی ہے۔ ہمارے مخلص اور محبت و اخلاص میں محو مولوی حکیم نوردین صاحب کا ذکر کرنا اس جگہ ضروری نہیں کیونکہ وہ تمام دنیا کو پامال کرکے میرے پاس ان فقراء کے رنگ میں آبیٹھے ہیں جیسا کہ اخص صحابہ رضی اللہ عنہم نے طریق ختیار کرلیا تھا۔
    اب ہمارے مخالفین کو سوچنا چاہیئے کہ اس باغ کی ترقی اور سرسبزی عبد الحق کے مباہلہ کے بعد کس قدر ہوئی ہے۔ یہ خدا کی قدرت نے کیا ہے جس کی آنکھیں ہوں وہ دیکھے۔ ہماری امرتسر کی مخلص جماعت۔ ہماری لاہور کی مخلص جماعت۔ ہماری سیالکوٹ کی مخلص جماعت۔ ہماری کپورتھلہ کی مخلص جماعت۔ ہماری ہندوستان کے شہروں کی مخلص جماعتیں وہ نور اخلاص اور محبت اپنے اندر رکھتی ہیں کہ اگر ایک بافراست آدمی ایک مجمع میں ان کے منہ دیکھے تو یقیناً سمجھ لے گا کہ یہ خدا کا ایک معجزہ ہے جو ایسے اخلاص ان کے دل میں بھر دیئے۔ ان کے چہروں پر ان کی محبت کے نور چمک رہے ہیں وہ ایک پہلی جماعت ہے جس کو خدا صدق کا نمونہ دکھلانے کے لئے تیار کر رہا ہے۔
    دسواں امر جو عبد الحق کے مباہلہ کے بعد میری عزت کا موجب ہوا جلسہ مذاہب لاہور


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 316
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 316
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/316/mode/1up
    316
    ہاتھ سے ادیان باطلہ کا مرجانا ضروری ہے یہ موت جھوٹے دینوں پر میرے ذریعہ سے ظہور میں نہ آوے
    ہے اس جلسہ کے بارے میں مجھے زیادہ لکھنے کی ضرورت نہیں۔ جس رنگ اور نورانیت کی قبولیت میرے مضمون کے پڑھنے میں پیدا ہوئی اور جس طرح دلی جوش سے لوگوں نے مجھے اور میرے مضمون کو عظمت کی نگہ سے دیکھا۔ کچھ ضرورت نہیں کہ میں اس کی تفصیل کروں۔ بہت سی گواہیاں اس بات پر سن چکے ہو کہ اس مضمون کا جلسہ مذاہب پر ایسا فوق العادت اثر ہوا تھا کہ گویا ملائک آسمان سے نور کے طبق لے کر حاضر ہوگئے تھے۔ *ہر ایک دل اس کی طرف ایسا کھینچا گیا تھا کہ گویا ایک دست غیب اس کو کشاں کشاں عالم وجد کی طرف لے جارہا ہے۔ سب لوگ بے اختیار بول اٹھے تھے کہ اگر یہ مضمون نہ ہوتا تو آج بباعث محمد حسین وغیرہ کے اسلام کو سُبکی اٹھانی پڑتی۔ ہر ایک پکارتا تھا کہ آج اسلام کی فتح ہوئی۔ مگر سوچو کہ کیا یہ فتح ایک دجال کے مضمون سے ہوئی۔ پھر میں کہتا ہوں کہ کیا ایک کافر کے بیان میں یہ حلاوت اور یہ برکت اور یہ تاثیر ڈال دی گئی۔ وہ جو مومن کہلاتے تھے اور آٹھ ہزار مسلمان کو کافر کہتے تھے جیسے محمد حسین بٹالوی خدا نے اس جلسہ میں کیوں ان کو ذلیل کیا۔ کیا یہ وہی الہام نہیں ’’کہ میں تیری اہانت کرنے والوں کی اہانت کروں گا‘‘ اس جلسہ اعظم میں ایسے شخص کو کیوں عزت دی گئی جو مولویوں کی نظر میں ایک کافر مرتد ہے۔ کیا کوئی مولوی اس کا جواب دے سکتا ہے۔
    پھر علاوہ اس عزت کے جو مضمون کی خوبی کی وجہ سے عطا ہوئی اسی روز وہ پیشگوئی بھی پوری ہوئی جو اس مضمون کے بارے میں پہلے سے شائع کی گئی تھی۔ یعنی یہ کہ
    یہی مضمون سب مضمونوں پر غالب آئے گا
    اور وہ اشتہارات تمام مخالفوں کی طرف جلسہ سے پہلے روانہ کئے گئے تھے۔ شیخ محمد حسین بطالوی اور مولوی احمد اللہ اور ثناء اللہ وغیرہ کی طرف روانہ ہوچکے تھے۔ سو اس روز وہ الہام بھی پورا ہوا اور شہر لاہور میں دھوم مچ گئی کہ نہ صرف مضمون اس شان کا نکلا جس سے اسلام کی فتح ہوئی بلکہ ایک الہامی پیشگوئی بھی پوری ہوگئی۔
    اس روز ہماری جماعت کے بہادر سپاہی اور اسلام کے معزز رکن حبّی فِی اللّٰہ مولوی عبدالکریم صاحب سیالکوٹی نے مضمون کے پڑھنے میں وہ بلاغت فصاحت دکھلائی کہ گویا ہر لفظ میں ان کو روح القدس مدد دے رہا تھا۔
    سو یہ عزتیں اور قبولیتیں ہم کو مباہلہ کے بعد ملیں۔ اب کوئی مولوی ہمیں سمجھاوے
    * اس جلسہ میں اکثر لوگ زار زار روتے تھے۔ یہ جلسہ اس مضمون کے پڑھنے سے گویا ایک صوفیاء کرام کی مجلس تھی۔ تمام زبانیں سکتہ کے عالم میں تھیں اور آنسو جاری تھے اور لذت اور وجد سے دل رقص کر رہے تھے اتمام تقریر کے بعد سب لوگوں نے مسلمانوں کو مبارک باددی۔ شیخ محمد حسین بٹالوی بھی اس روز طوعاً و کرہاً قائل ہوگئے کہ یہ تمام تاثیر خدا تعالیٰ کی طرف سے تھی اور یہ مضمون اسلام کی فتح کا موجب ہوا سول ملٹری گزٹ لاہور نے ہمارے مضمون کی نسبت کلمات ذیل لکھے ہیں اور سوائے ہمارے مضمون کے کسی کا ذکر نہیں کیا۔ اس کے الفاظ کا ترجمہ یہ ہے’’ اس جلسہ میں سامعین کی دلی اور خاص دلچسپی میرزا غلام احمد صاحب قادیانی کے لیکچر کے ساتھ تھی جو اسلام کی حمایت اور حفاظت کے کامل ماسٹر ہیں اس لیکچر کے سننے کے واسطے دور و نزدیک سے لوگوں کا ایک جم غفیر ہورہا تھا اور چونکہ میرزا صاحب خود تو تشریف نہیں لاسکتے تھے اس لئے یہ لیکچر ان کے ایک لائق شاگرد منشی عبد الکریم فصیح سیالکوٹی نے پڑھ کر سنایا۔ ۲۷ ؍ تاریخ کو یہ لیکچر ساڑھے تین گھنٹہ تک ہوتا رہا اور عوام الناس نے نہایت ہی خوشی اور توجہ سے اس کو سنا۔ لیکن ابھی صرف ایک سوال ختم ہوا۔ مولوی عبد الکریم نے وعدہ کیا کہ اگر وقت ملا تو باقی کا بھی سنا دوں گا اس لئے اگز کٹو کمیٹی اور پریسڈنٹ نے تجویز کر لی ہے کہ ۲۹ ؍تاریخ کا دن بڑھا دیا جائے‘‘ انتہیٰ چنانچہ ہمارے مضمون کے لئے بخوشی ایک دن اور بڑھایا گیا اور باقی مضمون بھی سامعین نے اسی ذوق و شوق سے سنا اخبار آبزرور کے الفاظ ہمارے مضمون کی نسبت سول کے الفاظ جیسے ہی ہیں۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 317
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 317
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/317/mode/1up
    317
    یعنی خدا تعالیٰ میرے ہاتھ سے وہ نشان ظاہر نہ کرے جن سے اسلام کا بول بالا ہو اور جس سے
    کہ عبد الحق نے مباہلہ کے بعد کونسی عزت دنیا میں پائی۔ کونسی قبولیت اس کی لوگوں میں پھیلی۔ کونسے مالی فتوحات کے دروازے اس پر کھلے۔ کون سی علمی فضیلت کی پگڑی اس کو پہنائی گئی۔ صرف فضول گوئی کے طور سے ایک بیٹا ہونے کا دعویٰ کیا تھا کہ تا یہی مباہلہ کا اثر سمجھا جائے۔ مگر اس کی بدبختی سے وہ دعویٰ بھی باطل نکلا۔ اور اب تک اس کی عورت کے پیٹ میں سے ایک چوہا بھی پیدا نہ ہوا۔ مگر اس کے مقابل پر خدا تعالیٰ نے میرے الہام کو پورا کرکے مجھے لڑکا عطا کیا۔*
    یہ دس۱۰ برکتیں مباہلہ کی ہیں جو میں نے لکھی ہیں۔ پھر کیسے خبیث وہ لوگ ہیں جو اس مباہلہ کو بے اثر سمجھتے ہیں۔ فعلیھم ان یتدبّروا ویفکّروا فی ھٰذہ العشرۃ الکاملۃ۔
    بالآخر ہم دوبارہ ہر ایک مخالف مکفر مکذب پر ظاہر کرتے ہیں کہ وہ مباہلہ کے میدان میں آویں اور یقیناً سمجھیں کہ جس طرح خدا تعالیٰ نے عبد الحق کے مباہلہ کے بعد یہ دس قسم کا ہم پر انعام و اکرام کیا۔ اور اس کو ذلیل کیا۔ اور اس کا بیٹے کا دعویٰ بھی جھوٹا نکلا۔ اور کوئی عزت اس کو حاصل نہ ہوئی۔ اور خدا تعالیٰ نے اس کے تمام دعاوی کو رد کیا۔ اس سے بڑھ کر اس مباہلہ میں ہوگا۔ میں نے اس روز بددعا نہیں کی۔ کیونکہ وہ ناسمجھ اور غبی تھا۔ اور اس کی جہالت اس کو قابل رحم ٹھہراتی تھی مگر اب میں بددعا کروں گا۔ سو چاہیئے کہ ہریک مباہلہ کی درخواست کرنے والا اپنی طرف سے چھپا ہوا اشتہار شائع کرے۔ اور یہ ضروری ہوگا کہ مباہلہ کرنے والا صرف ایک نہ ہو۔ بلکہ کم سے کم دس۱۰ ہوں۔ اور چونکہ مباہلہ کے لئے ہریک شخص بلایا گیا ہے خواہ پنجاب کا ہو یا ہندوستان کا۔ یا بلاد عرب کا یا بلاد فارس کا۔ اس لئے یہ مشقت مخالفوں پر جائز نہیں رکھی گئی کہ وہ دور دراز سفر کرکے پہنچیں بلکہ حسب منطوق 3 ۱؂۔ 3 3۲؂۔ یہ تجویز قرار پائی ہے کہ ہر ایک شخص اشتہارات کے ذریعہ سے مباہلہ کرے۔ مگر یہ شرط ضروری ہے کہ جو الہامات میں نے رسالہ انجام آتھم میں صفحہ ۵۱ سے صفحہ ۶۲ تک لکھے ہیں۔ وہ کل الہامات اپنے اشتہار مباہلہ میں لکھے۔ اور محض حوالہ نہ دے بلکہ کل الہام صفحات مذکورہ کے اشتہار میں درج کرے۔ اور پھر بعد اس کے عبارت ذیل کی دعا اس اشتہار میں لکھے۔ اور وہ یہ ہے
    دعا
    اے خدائے علیم و خبیر میں جو فلاں ابن فلاں ساکن قصبہ فلاں ہوں اس شخص کو
    * عبد الحق غزنوی نے ۳ شعبان ۱۳۱۴ھ کو اس *** کی سیاہی کو دھونے کیلئے جو اس کے منہ پر جم گئی ہے ایک اشتہار دیا ہے اس اشتہار کا جواب اس ضمیمہ میں بار بار لکھ چکا ہوں کہ میں نے اپنے مسیح موعود ہونے کا یہ ایک نشان ٹھہرایا ہے۔ پس میں مغلوب سے صرف یہی اقرار چاہتا ہوں نہ یہ کہ وہ میری عربی دانی کا اقرار کرے۔ سو اس کو چاہئے کہ دس۱۰ مولویوں کی گواہی سے حلفاًیہ اشتہار شائع کرے کہ اگر میں عربی فصیح بلیغ میں اس پر غالب آگیا تو وہ بلا توقف اسی مجلس میں میرے مسیح موعود ہونے کا اقرار کرکے مجھ سے بیعت کرلے گا۔ اب اگر اس مضمون کا اشتہار نہ دے تو لعنۃ اللّٰہ علیہ فی الدنیا والآخرۃ۔ اور مباہلہ کے لئے گو د۱۰س آدمی کی شرط ہے لیکن اگر صرف عبد الجبار اور عبد الواحد کو ساتھ ملا لے تب بھی مجھے منظور ہے۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 318
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 318
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/318/mode/1up
    318
    ہر ایک طرف سے اسلام میں داخل ہونا شروع ہوجائے۔ اور عیسائیت کا باطل معبود فنا ہوجائے اور دنیا
    جس کا نام غلام احمد ہے دعویٰ مسیح موعود ہونے میں کاذب اور مفتری اور کافر جانتا ہوں اور یہ تمام الہام اس کے جو میں نے انجام آتھم کے صفحہ ۵۱ سے صفحہ ۶۲ تک اس اشتہار میں لکھے ہیں یہ سب میرے نزدیک افترا یا شیطانی وساوس ہیں۔ تیری طرف سے نہیں ہیں۔ پس اے خدائے قادر اگر تو جانتا ہے کہ میں اپنے اس اصرار میں سچا ہوں اور اس کا یہ دعویٰ تیری طرف سے نہیں اور نہ یہ الہام تیری طرف سے ہیں بلکہ وہ درحقیقت کافر ہے تو اس امت مرحومہ پر یہ احسان کر کہ اس مفتری کو ایک سال کے اندر ہلاک کردے تالوگ اس کے فتنہ سے امن میں آجائیں اور اگر یہ مفتری نہیں اور تیری طرف سے ہے اور یہ تمام الہام تیرے ہی منہ کی پاک باتیں ہیں تو مجھ پر جو میں اس کو کافر اور کذاب سمجھتا ہوں دکھ اور ذلت سے بھرا ہوا عذاب آج کے دن سے ایک برس کے اندر نازل کر۔ آمین۔
    یہ اشتہار جب کسی مباہلہ کرنے والے کی طرف سے بغیر کسی تغیر تبدل کے آئے گا تو ایک شخص کو کہا جائے گا کہ اس اشتہار کو ہماری جماعت میں پڑھے تب اس کے ختم ہونے پر تمام جماعت آمین کہے گی اور ایسا ہی سمجھا جائے گا کہ گویا بالمواجہ مباہلہ ہوا۔ ایسا ہی میری طرف سے اشتہار آنے کے بعد اس مضمون کی تحریر مباہلہ چھپے گی کہ میں وہ تمام الہامات جو انجام آتھم کے صفحہ ۵۱ سے صفحہ ۶۲ تک لکھے گئے ہیں اس اپنی تحریر میں درج کروں گا۔ اور یہ دعا بعد اس کے لکھوں گا۔ کہ اے خدائے قادر علیم اگر تو جانتا ہے کہ میں نے دعویٰ مسیح موعود ہونے کا اپنی طرف سے بنا لیا ہے اور یہ تیرے الہامات نہیں جو اس اشتہار میں لکھے گئے ہیں بلکہ میرا افترا ہیں یا شیطانی وساوس ہیں تو آج کی تاریخ سے ایک برس گزرنے سے پہلے مجھے وفات دے یا کسی ایسے عذاب میں مبتلا کر جو موت سے بدتر ہو۔ لیکن اگر تو جانتا ہے کہ میرا دعویٰ تیرے الہام سے ہے اور یہ سب الہامات تیرے الہامات ہیں جو اس اشتہار میں لکھے گئے ہیں تو اس مخالف کو جو اپنے اشتہار مباہلہ کے ذریعہ سے میری تکذیب کرتا اور مجھ کو کاذب جانتا ہے ایک سال کے عرصہ میں نہایت دکھ کی مار میں مبتلا کر۔ آمین۔ اور جب یہ اشتہار اس مخالف مباہلہ کنندہ کے پاس پہنچے تو چاہئے کہ وہ ایک جماعت میں پڑھا جائے اور بعد ختم ہونے مضمون کے ساری جماعت آمین کہے۔
    یہ تجویز مباہلہ ان لوگوں کیلئے ہے جو پچاس۵۰ کوس سے زیادہ فاصلہ پر رہتے ہیں۔ لیکن اگر پچاس کوس کے اندر ہوں جیسے شیخ محمد حسین بٹالوی اور ثناء اللہ امرتسری اور احمد اللہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 319
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 319
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/319/mode/1up
    319
    اوررنگ نہ پکڑ جائے تو میں خدا تعالیٰ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ میں اپنے تئیں کاذب خیال کرلوں گا اور خدا جانتا ہے کہ میں ہرگز کاذب نہیں۔ یہ سات برس کچھ زیادہ سال نہیں ہیں۔ اور اس قدر انقلاب اس تھوڑی مدت میں ہوجانا انسان کے اختیار میں ہرگز نہیں۔ پس جبکہ میں سچے دل سے اور خدا تعالیٰ کی قسم کے ساتھ یہ اقرار کرتا ہوں اور تم سب کو اللہ کے نام پر صلح کی طرف بلاتا ہوں تو اب تم خدا سے ڈرو۔ اگر میں خدا تعالیٰ کی طرف سے نہیں ہوں تو میں تباہ ہو جاؤں گا۔ ورنہ خدا کے مامور کو کوئی تباہ نہیں کرسکتا۔
    یہ یاد رہے کہ معمولی بحثیں آپ لوگوں سے بہت ہوچکی ہیں اور عیسیٰ علیہ السلام کی وفات قرآن اور حدیث سے بپایہ ثبوت پہنچ گئی۔ اس طرف سے کتابیں تالیف ہوکر لاکھوں انسانوں میں پھیل گئیں۔ طرف ثانی نے بھی ہریک تلبیس اور تزویر سے کام لیا۔ پاک کتابوں کے نیک روحوں پر بڑے بڑے اثر پڑے۔ اور ہزارہا سعید لوگ اس جماعت میں داخل ہوگئے۔ اور تقریری اور تحریری بحثوں کے نتیجے اچھی طرح کھل گئے۔ اب پھر اسی بحث کو چھیڑنا یا فیصلہ شدہ باتوں سے انکار کرنا محض شرارت اور بے ایمانی ہے۔ کتابیں موجود ہیں ہاں عین مباہلہ کے وقت پھر ایک گھنٹہ تک تبلیغ کرسکتا ہوں۔ پس فیصلہ کی یہی راہیں ہیں جو میں نے پیش کی ہیں۔ اب اس کے بعد جو شخص طے شدہ بحثوں کی ناحق درخواست کرے گا میں سمجھوں گا اس کو حق کی طلب نہیں بلکہ سچائی کو ٹالنا چاہتا ہے۔
    یہ بھی یاد رہے کہ اصل مسنون طریق مباہلہ میں یہی ہے کہ جو لوگ ایسے مدعی کے ساتھ مباہلہ کریں جو مامور من اللہ ہونے کا دعویٰ رکھتا ہو اور اس کو کاذب یا کافر ٹھہراویں۔ وہ
    امرتسری اور عبد الحق غزنوی اور میاں عبد الجبار غزنوی تو ان کے لئے یہ طریق احسن ہے کہ وہ بالمواجہ مباہلہ کرلیں۔ آدھی مسافت میں طے کروں اور آدھی وہ طے کریں۔ اور ایک درمیانی جگہ میں مباہلہ ہو جائے۔ یہ ہماری آخری اتمام حجت ہے۔ اب بھی اگر کوئی شخص ظلم کو نہیں چھوڑے گا تو اس پر خدا تعالیٰ کی حجت پوری ہوگئی۔ والسّلام علٰی من اتّبع الہدیٰ۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 320
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 320
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/320/mode/1up
    320
    ایک جماعت مباہلین کی ہو۔ صرف ایک یا دو آدمی نہ ہوں کیونکہ اللہ تعالیٰ نے آیت کریمہ3۱؂ میں تَعَالَوْاکو بصیغہ جمع بیان فرمایا ہے۔ سو اس نے اس جمع کے صیغہ سے اپنے نبی کے مقابل پر ایک جماعت مکذبین کو مباہلہ کے لئے بلایا ہے نہ شخص واحد کو بلکہ من حاجّک کے لفظ سے جھگڑنے والے کو ایک شخض واحد قرار دے کر پھر مطالبہ جماعت کا کیا ہے۔ اور یہ فرمایا ہے کہ اگر کوئی جھگڑنے سے باز نہ آوے اور دلائل پیش کردہ سے تسلی نہ پکڑے تو اس کو کہہ دو کہ ایک جماعت بن کر مباہلہ کے لئے آویں۔ سو اسی بنا پر ہم نے جماعت کی قید لگا دی ہے جس میں یہ صریح فائدہ ہے کہ جو امر خارق عادت بطور عذاب مکذبین پر نازل ہو وہ مشتبہ نہیں رہے گا۔ مگر صرف ایک شخص میں مشتبہ رہنے کا احتمال ہے۔
    اس جگہ اس بات کا ذکر کرنا ضروری ہے کہ تمام مخالفین کو یہ بات یاد رکھنی چاہئے کہ اگر اس کتاب کی اشاعت کے بعد کوئی مخالف مباہلہ کے لئے تیار ہوجائے اور اس کے اشتہار ات بھی چھپ جاویں تو ہر ایک مباہلہ کے خواہشمند پر واجب ہوگا کہ اسی کے ساتھ شامل ہوکر مباہلہ کرلے۔ اور اگر کوئی ایسا نہ کرے اور پھر کسی دوسرے وقت میں مباہلہ کی درخواست بھیجے تو ایسی درخواست منظور نہیں کی جاوے گی۔ اور ایسا شخص کسی طور سے قابل التفات نہیں سمجھا جاوے گا چاہئے کہ ہر ایک شخص ہمارے اس اشتہار کو یاد رکھے اور اس کے موافق کاربند ہو۔
    بالآخر ہم اس جگہ نقل خط میاں غلام فرید صاحب پیر نواب بہاولپور جو ایک صالح اور متقی مرد مشائخ پنجاب میں سے ہیں۔ اس غرض سے درج کرتے ہیں کہ تا دوسرے مشائخ مدعوّین بھی کم سے کم ان کے نمونہ پر چلیں۔ اور اگر زیادہ توفیق یاری نہ کرے تو البتہ ان کے خیال سے کم نہ رہیں۔ میں سچ سچ کہتا ہوں کہ جو شخص اس قدر بھی اس عاجز کی تصدیق کرے گا جیسا کہ میاں غلام فرید صاحب نے اپنے خط کے ذریعہ سے کی اس کا بھی خدا ان لوگوں میں حشر کرے گا جنہوں نے سچائی کو رد کرنا نہیں چاہا۔ دل کا ایک ذرّہ تقویٰ بھی انسان کو خدا تعالیٰ کے غضب سے بچا لیتا ہے۔ میں نہیں چاہتا کہ ایک بُت کی طرح میری پوجا کی جائے میں صرف اس خدا کا جلال چاہتا ہوں جس کی طرف سے میں مامور ہوں۔ جو شخض مجھے بے عزتی سے دیکھتا ہے۔ وہ اس خدا کو بے عزتی سے دیکھتا ہے جس نے مجھے مامور کیا ہے اور جو مجھے قبول کرتا ہے وہ اس خدا کو


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 321
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 321
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/321/mode/1up
    321
    قبول کرتا ہے جس نے مجھے بھیجا ہے۔ انسان میں اس سے زیادہ کوئی خوبی نہیں کہ تقویٰ کی راہ کو اختیار کرکے مامور من اللہ کی لڑائی سے پرہیز کرے اور اس شخص کی جلدی سے تکذیب نہ کرے جو کہتا ہے کہ میں مامور من اللہ ہوں اور محض تجدید دین کے لئے صدی کے سر پر بھیجا گیا ہوں۔ ایک متقی اس بات کو سمجھ سکتا ہے کہ اس چودھویں صدی کے سر پر جس میں ہزاروں حملے اسلام پر ہوئے ایک ایسے مجدد کی ضرورت تھی کہ اسلام کی حقیّتثابت کرے۔ ہاں اس مجدد کا نام اس لئے مسیح ابن مریم رکھا گیا کہ وہ کسر صلیب کے لئے آیا ہے اور خدا اس وقت چاہتا ہے کہ جیسا کہ مسیح کو پہلے زمانہ میں یہودیوں کی صلیب سے نجات دی تھی اب عیسائیوں کی صلیب سے بھی اس کو نجات دے۔ چونکہ عیسائیوں نے انسان کو خدا بنانے کے لئے بہت کچھ افترا کیا ہے۔ اس لئے خدا کی غیرت نے چاہا کہ مسیح کے نام پر ہی ایک شخص کو مامور کرکے اس افترا کو نیست و نابود کرے۔ یہ خدا کا کام ہے اور ان لوگوں کی نظر میں عجیب۔
    قرآن شریف صاف کہتا ہے کہ مسیح وفات پاکر آسمان پر اٹھایا گیا ہے۔ لہٰذا اس کا نزول برُوزی ہے نہ کہ حقیقی اور آیت 3 ۱؂ میں صریح ظاہر کیا گیا ہے کہ واقعہ وفات حضرت عیسیٰ علیہ السلام وقوع میں آگیا۔ کیونکہ اس آیت کا یہ مطلب ہے کہ عیسائی حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی وفات کے بعد بگڑیں گے نہ کہ ان کی زندگی میں۔ پس اگر فرض کرلیں کہ اب تک حضرت عیسیٰ علیہ السلام فوت نہیں ہوئے تو ماننا پڑے گا کہ عیسائی بھی اب تک نہیں بگڑے۔ اور یہ صریح باطل ہے بلکہ آیت تو بتلاتی ہے کہ عیسائی صرف مسیح کی زندگی تک حق پر قائم رہے۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ حواریوں کے عہد میں ہی خرابی شروع ہوگئی تھی۔ اگر حواریوں کا زمانہ بھی ایسا ہوتا کہ اس زمانہ میں بھی عیسائی حق پر قائم ہوتے تو خدا تعالیٰ اس آیت میں صرف مسیح کی زندگی کی قید نہ لگاتا بلکہ حواریوں کی زندگی کی بھی قید لگا دیتا۔ پس اس جگہ سے ایک نہایت عمدہ نکتہ عیسائیت کے زمانہ فساد کا معلوم ہوتا ہے۔ اور وہ یہ کہ درحقیقت حواریوں کے زمانہ میں ہی عیسائی مذہب میں شرک کی تخم ریزی ہوگئی تھی۔ ایک شریر یہودی پولوس نام جو یونانی زبان سے بھی کچھ حصہ رکھتا تھا جس کا ذکر مثنوی رومی میں بھی ہے حواریوں میں آملا اور ظاہر کیا کہ میں نے عالم کشف میں عیسیٰ علیہ السلام کو دیکھا ہے۔ اس شخص نے عیسائی مذہب میں بہت فساد ڈالا آخر


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 322
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 322
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/322/mode/1up
    322
    نتیجہ یہ ہو اکہ ایک فرقہ عیسائیوں کا تو توحید پر قائم رہا اور ایک خبیث فرقہ اس کے اغوا سے مردہ پرست ہوگیا۔ جس کی ذرّیات ہمارے ملک میں بھی پیدا ہوگئی ہیں۔ تیسری صدی عیسوی میں مشرک فرقہ اور موحد فرقہ کے درمیان بڑا مباحثہ ہوا۔ اس مباحثہ کا بانی مبانی قیصر روم تھا۔ بہت سی تحقیق اور تہذیب کے ساتھ بادشاہ کے روبرو یہ مباحثہ طے ہوا اور انجام یہ ہوا کہ فرقہ موَ ّ حد غالب آیا۔ اسی روز سے قیصر روم نے جو عیسائی تھا توحید کے مذہب کو اختیار کر لیا۔ اور برابر چھٹی صدی تک ہریک قیصر موَحّد عیسائی ہوتا رہا۔ غرض جیسا کہ آیت کا مفہوم ہے عیسائیوں میں فساد اور بگاڑ حضرت عیسیٰ کی وفات کے بعد ہی شروع ہوگیا تھا۔
    اور صحیح بخاری میں صاف لفظوں میں لکھا گیا ہے کہ آنے والا مسیح موعود اسی امت میں سے ہوگا۔ سو یہ امر سراسر تقویٰ کے خلاف ہے کہ اللہ اور رسول کے بیان سے سرکش رہیں۔ دیکھو یہی علماء کیسے شوق سے چودھویں صدی کے منتظر تھے اور تمام دل بول اٹھے تھے کہ اسی صدی کے سر پر مہدی اور مسیح پیدا ہوگا۔ بہت سے صلحا اور اولیاء کے کشف اس بات پر قطع کرچکے تھے کہ مہدی اور مسیح موعود کا زمانہ چودھویں صدی ہے۔ اب ان کے دلوں کو کیا ہوگیا۔33 33۔۱؂ مگر ضرور تھا کہ وہ مجھے کافر کہتے اور میرا نام دجّال رکھتے۔ کیونکہ احادیث صحیحہ میں پہلے سے یہی فرمایا گیا تھا کہ اس مہدی کو کافر ٹھہرایا جائے گا۔ اور اس وقت کے شریر مولوی اس کو کافر کہیں گے اور ایسا جوش دکھلائیں گے کہ اگر ممکن ہوتا تو اس کو قتل کر ڈالتے۔ مگر خدا کی شان ہے کہ ان ہزاروں میں سے یہ میاں غلام فرید صاحب چاچڑاں والوں نے پرہیزگاری کا نور دکھلایا۔ وَذَالِکَ فَضْلُ اللّٰہِ یُؤْتِیْہِ مَنْ یَّشَآءُ ۔ خدا ان کو اجر بخشے اور عاقبت بالخیر کرے۔ آمین۔ اب جب تک یہ تحریریں دنیا میں رہیں گی۔ میاں صاحب موصوف کا ذکر باخیر بھی اس کے ساتھ دنیا میں کیا جائے گا۔ یہ زمانہ گذر جائے گا اور دوسرا زمانہ آئے گا اور خدا اس زمانے کے لوگوں کو آنکھیں دے گا اور وہ ان لوگوں کے حق میں دعاءِ خیر کریں گے جنہوں نے مجھے پاکر میرا ساتھ دیا ہے۔ سچ سچ کہتا ہوں کہ یہ وقت گزر جائے گا اور ہر ایک غافل اور منکر اور مکذب وہ حسرتیں ساتھ لے جائے گا جن کا تدارک


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 323
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 323
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/323/mode/1up
    323
    پھر اس کے ہاتھ میں نہیں ہوگا۔ اب میاں غلام فرید صاحب کا خط ذیل میں حسب وعدہ مذکورہ لکھا جاتا ہے اور وہ یہ ہے
    مِن فقیر باب اللہ غلام فرید سجّادہ نشین الیٰ جناب میرزا غلام احمد صاحب قادیانی
    بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
    الحَمْدللّٰہ ربّ الارباب۔ وَالصّلوۃ علٰی رَسُولہ الشفیع بیوم الحساب۔ وعلٰی آلہ والاصحاب والسّلام علیکم وعلٰی مَنْ اجتہد واصاب۔ امّا بعد قد ارسلت الیّ الکتاب۔ وبہ دعوت الٰی المباہلۃ وطالبت بالجواب۔ وانی وان کنت عدیم الفرصۃ ولکن رایت جزۂ من حسن الخطاب۔ وسوق العتاب۔ اعلم یا اعزّالاحباب۔ انّی مِن بدوحالک واقف علٰی مقام تعظیمک لنیل الثواب۔ وما جرت علی لسانی کلمۃ فی حقّک الا بالتبجیل ورعایۃ الآداب۔ والآن اطّلع لک بانّی مُعترف بصلاح حالک بلا ارتیاب۔ وموقن بانّک مِنْ عباد اللّہ الصالحین وفی سعیک المشکور مثاب۔ وقد اوتیت الفضل من الملک الوہاب۔ ولک ان تسئل من اللّٰہ تعالٰی خیر عاقبتی وادعولکم حسن مآب۔ ولو لا خوف الاطناب۔ لازددت فی الخطاب۔ وَالسّلام علٰی من سلک سبیل الصواب۔ فقط
    ۲۷؍ رجب ۱۳۱۴ھ من مقام چاچڑاں
    مہر


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 324
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 324
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/324/mode/1up
    324
    ترجمہ اس کا یہ ہے۔ تمام تعریفیں اس خدا کے لئے ہیں جو رب الارباب ہے۔ اور درود اس رسول مقبول پر جو یوم الحساب کا شفیع ہے اور نیز اس کی آل اور اصحاب پر۔ اور تم پر سلام اور ہریک پر جوراہ صواب میں کوشش کرنے والا ہو۔ اس کے بعد واضح ہو کہ مجھے آپ کی وہ کتاب پہنچی جس میں مباہلہ کے لئے جواب طلب کیا گیا ہے۔ اور اگرچہ میں عدیم الفرصت تھا تاہم میں نے اس کتاب کی ایک جز کو جو حسن خطاب اور طریق عتاب پر مشتمل تھی پڑھی ہے سو اے ہریک حبیب سے عزیز تر تجھے معلوم ہو کہ میں ابتدا سے تیرے لئے تعظیم کرنے کے مقام پر کھڑا ہوں۔ تا مجھے ثواب حاصل ہو اور کبھی میری زبان پر بجز تعظیم اور تکریم اور رعایت آداب کے تیرے حق میں کوئی کلمہ جاری نہیں ہوا۔ اور اب میں مطلع کرتا ہوں کہ میں بلاشبہ تیرے نیک حال کا معترف ہوں۔ اور میں یقین رکھتا ہوں کہ تو خدا کے صالح بندوں میں سے ہے اور تیری سعی عند اللہ قابل شکر ہے جس کا اجر ملے گا اور خدائے بخشندہ بادشاہ کا تیرے پر فضل ہے۔ میرے لئے عاقبت بالخیر کی دعا کر اور میں آپ کے لئے انجام خیر و خوبی کی دعا کرتا ہوں۔ اگر مجھے طول کا اندیشہ نہ ہوتا تو میں زیادہ لکھتا۔ والسّلام علٰی من سلک سبیل الصواب۔ من مقام چاچڑاں
    ایک اور پیشگوئی کا پورا ہونا
    چونکہ حدیث صحیح میں آچکا ہے کہ مہدی موعود کے پاس ایک چھپی ہوئی کتاب ہوگی جس میں اس کے تین سو ۳۱۳تیرہ اصحاب کا نام درج ہوگا۔ اس لئے یہ بیان کرنا ضروری ہے کہ وہ پیشگوئی آج پوری ہوگئی۔ یہ تو ظاہر ہے کہ پہلے اس سے امت مرحومہ میں کوئی ایسا شخص پیدا نہیں ہوا کہ جو مہدویت کا مدعی ہوتا اور اس کے وقت میں چھاپہ خانہ بھی ہوتا۔ اور اس کے پاس ایک کتاب بھی ہوتی جس میں تین سو ۳۱۳تیرہ نام لکھے ہوئے ہوتے۔ اور ظاہر ہے کہ اگر یہ کام انسان کے اختیار میں ہوتا تو اس سے پہلے کئی جھوٹے اپنے تئیں اس کا مصداق بنا سکتے۔ مگر اصل بات یہ ہے کہ خدا کی پیشگوئیوں میں ایسی فوق العادت شرطیں ہوتی ہیں کہ کوئی جھوٹا ان سے فائدہ نہیں اٹھا سکتا۔ اور اس کو وہ سامان اور اسباب عطا نہیں کئے جاتے جو سچے کو عطا کئے جاتے ہیں۔
    شیخ علی حمزہ بن علی ملک الطوسی اپنی کتاب جواہر الاسرار میں جو ۸۴۰ ؁ھ میں تالیف ہوئی تھی مہدی موعود کے بارے میں مندرجہ ذیل عبارت لکھتے ہیں۔ ’’دراربعین آمدہ است کہ خروج مہدی


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 325
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 325
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/325/mode/1up
    325
    ازقریہ کدعہ باشد۔ قال النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم یخرج المھدی من قریۃ یقال لھا کدعہ ویصدقہ اللّٰہ تعالٰی ویجمع اصحابہ من اقصَی البلاد علی عدّۃ اھل بدر بثلاث ماءۃ وثلا ثۃ عشر رجلا ومعہ صحیفۃ مختومۃ )ای مطبوعۃ( فیھا عدد اصحابہ باسماءھم وبلادھم وخلالھم یعنی مہدی اس گاؤں سے نکلے گا جس کا نام کدعہ ہے )یہ نام دراصل قادیان کے نام کو معرب کیا ہوا ہے( اور پھر فرمایا کہ خدا اس مہدی کی تصدیق کرے گا۔ اور دور دور سے اس کے دوست جمع کرے گا جن کا شمار اہل بدر کے شمار سے برابر ہوگا۔ یعنی تین سو ۳۱۳تیرہ ہوں گے۔ اور ان کے نام بقید مسکن وخصلت چھپی ہوئی کتاب میں درج ہوں گے۔
    اب ظاہر ہے کہ کسی شخص کو پہلے اس سے یہ اتفاق نہیں ہوا کہ وہ مہدی موعود ہونے کا دعویٰ کرے اور اس کے پاس چھپی ہوئی کتاب ہو جس میں اس کے دوستوں کے نام ہوں۔ لیکن میں پہلے اس سے بھی آئینہ کمالات اسلام میں تین سو۳۱۳تیرہ نام درج کرچکا ہوں اور اب دو بارہ اتمام حجت کے لئے تین سو۳۱۳تیرہ نام ذیل میں درج کرتا ہوں تا ہریک منصف سمجھ لے کہ یہ پیشگوئی بھی میرے ہی حق میں پوری ہوئی۔ اور بموجب منشاء حدیث کے یہ بیان کر دینا پہلے سے ضروری ہے کہ یہ تمام اصحاب خصلت صدق و صفا رکھتے ہیں اور حسب مراتب جس کو اللہ تعالیٰ بہتر جانتا ہے بعض بعض سے محبت اور انقطاع الی اللہ اور سرگرمی دین میں سبقت لے گئے ہیں۔
    اللہ تعالیٰ سب کو اپنی رضا کی راہوں میں ثابت قدم کرے۔ اور وہ یہ ہیں۔
    منشی جلال الدین صاحب پنشنر سابق میر منشی
    رجمٹ نمبر ۱۲۔ موضع بلانی کھاریاں۔ ضلع گجرات
    ۲۔مولوی حافظ فضل دین صاحب ؍؍
    ۳۔میاں محمد دین پٹواری بلانی ؍؍
    ۴۔قاضی یوسف علی نعمانی معہ اہل بیت تشام حصار
    ۵۔میرزا امین بیگ صاحب معہ اہل بیت بہالوجی جیپور
    ۶۔مولوی قطب الدین صاحب۔بدوملی۔ سیالکوٹ
    ۷۔منشی روڑا صاحب۔ کپور تھلہ
    ۸۔میاں محمد خاں صاحب ؍؍
    ۹۔منشی ظفر احمد صاحب ؍؍
    ۱۰۔منشی عبد الرحمن صاحب ؍؍
    ۱۱۔منشی فیاض علی صاحب ؍؍
    ۱۲۔مولوی عبد الکریم صاحب سیالکوٹ
    ۱۳ ۔سید حامد شاہ صاحب ؍؍
    ۱۴ ۔مولوی وزیر الدین صاحب کانگڑہ
    ۱۵۔منشی گوہر علی صاحب جالندھر

    ۱۶۔مولوی غلام علی صاحب ڈپٹی رہتاس۔ جہلم
    ۱۷۔میاں نبی بخش صاحب رفوگر۔ امرتسر
    ۱۸۔میاں قطب الدین خان صاحب مس گر ؍؍
    ۱۹۔میاں عبد الخالق صاحب ؍؍
    ۲۰۔مولوی ابو الحمید صاحب حیدرآباد دکن
    ۲۱۔مولوی حاجی حافظ حکیم نور دین صاحب معہ ہر دو
    زوجہ۔بھیرہ۔ ضلع شاہ پور
    ۲۲۔مولوی سید محمد احسن صاحب امروہہ ۔ ضلع مراد آباد
    ۲۳ ۔مولوی حاجی حافظ حکیم فضل دین صاحب معہ ہردوز زوجہ بھیرہ
    ۲۴ ۔صاحبزادہ محمد سراج الحق صاحب جمالی نعمانی
    قادیانی سابق سرساوی معہ اہلبیت
    ۲۵۔سید ناصر نواب صاحب دہلوی۔ حال قادیانی
    ۲۶۔صاحبزادہ افتخار احمد صاحب لدھیانوی بمعہ اہلبیت ؍؍
    ۲۷ ۔صاحبزادہ منظور محمد صاحب معہ اہلبیت ؍؍
    ۲۸ ۔حافظ حاجی مولوی احمد اللہ خان معہ اہلبیت ؍؍
    ۲۹۔سیٹھ عبد الرحمن صاحب حاجی اللہ رکھا معہ اہلبیت مدراس
    ۳۰ ۔میاں جمال الدین سیکھواں گورداسپور معہ اہلبیت
    ۳۱ ۔میاں خیر الدین ؍؍ ؍؍ ؍؍
    ۳۲۔ میاں امام الدین ؍؍ ؍؍ ؍؍
    ۳۳۔ میاں عبد العزیز پٹواری ؍؍ ؍؍
    ۳۴۔ منشی گلاب دین۔ رہتاس۔ جہلم
    ۳۵۔ قاضی ضیاء الدین صاحب۔ قاضی کوٹی
    ۳۶۔ میاں عبد اللہ صاحب پٹواری۔ سنوری
    ۳۷۔ شیخ عبدالرحیم صاحب نومسلم سابق لیس
    دفعدار رسالہ نمبر ۱۲ چھاؤنی سیالکوٹ
    ۳۸۔ مولوی مبارک علی صاحب امام ؍؍
    ۳۹۔ میرزا نیاز بیگ صاحب کلا نوری
    ۴۰۔ میرزا یعقوب بیگ صاحب ۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۴۱۔ میرزا ایوب بیگ صاحب معہ اہلبیت۔۔؍؍
    ۴۲۔ میرزا خدا بخش صاحب ۔ جھنگ
    ۴۳۔ سردار نواب محمد علیخاں صاحب رئیس مالیر کوٹلہ
    ۴۴۔سید محمد عسکری خان صاحب سابق اکٹرا اسسٹنٹ الہ آباد


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 326
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 326
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/326/mode/1up
    326
    ۴۵۔میرزا محمد یوسف بیگ صاحب۔ سامانہ ریاست پٹیالہ
    ۴۶۔ شیخ شہاب الدین صاحب۔ لودیانہ
    ۴۷۔ شہزادہ عبد المجید صاحب۔ ؍؍
    ۴۸۔ منشی حمید الدین صاحب۔ ؍؍
    ۴۹۔ میاں کرم الٰہی صاحب ؍؍
    ۵۰۔ قاضی زین العابدین صاحب خانپور۔ سرہند
    ۵۱ ۔ مولوی غلام حسن صاحب رجسٹرار۔۔۔ پشاور
    ۵۲ ۔محمد انوار حسین خان صاحب۔ شاہ آباد۔ ہردوئی
    ۵۳۔ شیخ فضل الٰہی صاحب۔ فیض اللہ چک
    ۵۴۔ میاں عبد العزیز صاحب۔ ۔۔۔ ۔۔۔ دہلی
    ۵۵۔ مولوی محمد سعید صاحب۔ شامی۔۔۔ طرابلسی
    ۵۶۔ مولوی حبیب شاہ صاحب۔ ۔۔۔ خوشاب
    ۵۷۔ حاجی احمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بخارا
    ۵۸۔ حافظ نور محمد صاحب۔ ۔۔۔ فیض اللہ چک
    ۵۹۔ شیخ نور احمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امرتسر
    ۶۰ ۔مولوی جمال الدین صاحب۔ ۔۔۔سید والہ
    ۶۱۔ میاں عبد اللہ صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ٹھٹھہ شیرکا
    ۶۲۔ میاں اسمعیل صاحب۔۔۔۔۔۔۔ سرساوہ
    ۶۳۔ میاں عبد العزیز صاحب نومسلم۔ قادیان
    ۶۴ ۔خواجہ کمال الدین صاحب بی اے معہ اہل بیت لاہور
    ۶۵۔ مفتی محمد صادق صاحب بھیرہ۔ ضلع شاہ پور
    ۶۶۔ شیر محمد خاں صاحب ۔۔۔ بکہر ؍؍
    ۶۷۔ منشی محمد افضل صاحب لاہور حال۔۔۔ ممباسہ
    ۶۸۔ ڈاکٹر محمد اسمٰعیل خان صاحب گوڑیانی ملازم ؍؍
    ۶۹۔میاں کریم الدین صاحب مدرس قلعہ سوبھا سنگھ
    ۷۰۔ سید محمد اسمٰعیل دہلوی طالب علم حال قادیان
    ۷۱۔ بابو تاج الدین صاحب اکونٹنٹ۔ لاہور
    ۷۲۔ شیخ رحمت اللہ صاحب تاجر۔ ۔۔۔۔۔۔؍؍
    ۷۳۔ شیخ نبی بخش صاحب۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۷۴۔ منشی معراج الدین صاحب۔۔۔۔۔۔۔؍؍
    ۷۵۔ شیخ مسیح اللہ صاحب ۔۔۔ شاہجہان پوری
    ۷۶۔منشی چوہدری نبی بخش صاحب معہ اہل بیت۔ بٹالہ
    ۷۷۔ میاں محمد اکبر صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بٹالہ
    ۷۸۔ شیخ مولا بخش صاحب۔ ۔۔۔ ڈنگہ گجرات
    ۷۹۔ سید امیر علی شاہ صاحب سارجنٹ سیالکوٹ
    ۸۰۔ میاں محمد جان صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔وزیر آباد
    ۸۱۔ میاں شادی خاں صاحب۔ ۔۔۔سیالکوٹ
    ۸۲۔ میاں محمد نواب خان صاحب تحصیلدار۔ جہلم
    ۸۳۔ میاں عبد اللہ خان صاحب برادر نواب خان صاحب؍؍
    ۸۴۔ مولوی برہان الدین صاحب۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۸۵۔ شیخ غلام نبی صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔راولپنڈی
    ۸۶۔ بابو محمد بخش صاحب ہیڈ کلرک۔ چھاؤنی انبالہ
    ۸۷ ۔منشتی رحیم بخش صاحب میونسپل کمشنر۔ لدھیانہ
    ۸۸۔ منشی عبد الحق صاحب کرانچی والہ ۔۔۔ ؍؍
    ۸۹۔ حافظ فضل احمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ لاہور
    ۹۰۔ قاضی امیر حسین صاحب۔۔۔۔۔۔۔ بھیرہ
    ۹۱۔ مولوی حسن علی صاحب مرحوم۔ ۔۔۔بھاگلپور
    ۹۲۔ مولوی فیض احمد صاحب لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ
    ۹۳۔ سید محمود شاہ صاحب مرحوم۔ ۔۔۔سیالکوٹ
    ۹۴ ۔مولوی غلام امام صاحب عزیز الواعظین منی پور آسام
    ۹۵۔ رحمن شاہ صاحب ناگپور ضلع چاندہ۔وڑوڑہ
    ۹۶ ۔میاں جان محمد صاحب مرحوم۔ ۔۔۔قادیان
    ۹۷۔ منشی فتح محمد معہ اہلبیت بز دارلیہ ڈیرہ اسمٰعیل خاں
    ۹۸۔ شیخ محمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مکی
    ۹۹ ۔حاجی منشی احمد جان صاحب مرحوم۔ لودیانہ
    ۱۰۰۔ منشی پیر بخش صاحب مرحوم ۔۔۔ جالندھر
    ۱۰۱ ۔شیخ عبد الرحمن صاحب نومسلم ۔۔۔ قادیان
    ۱۰۲۔ حاجی عصمت اللہ صاحب۔ ۔۔۔ لودیانہ
    ۱۰۳۔ میاں پیر بخش صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍
    ۱۰۴۔ منشی ابراہیم صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۱۰۵۔ منشی قمر الدین صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۱۰۶۔ حاجی محمد امیر خاں صاحب۔ ۔۔۔سہارنپور
    ۱۰۷۔ حاجی عبد الرحمن صاحب مرحوم۔ ۔۔۔لودیانہ
    ۱۰۸۔ قاضی خواجہ علی صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍
    ۱۰۹۔ منشی تاج محمد خاں صاحب۔ ۔۔۔ لودیانہ
    ۱۱۰۔ سید محمد ضیاء الحق صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔روپڑ
    ۱۱۱۔شیخ محمد عبد الرحمن صاحب عرف شعبان۔ کابلی
    ۱۱۲۔ خلیفہ رجب دین صاحب تاجر۔ ۔۔۔لاہور
    ۱۱۳۔ پیر جی خدا بخش صاحب مرحوم۔ ڈیرہ دون
    ۱۱۴۔ حافظ مولوی محمد یعقوب خان صاحب ؍؍
    ۱۱۵۔ شیخ چرا غ علی نمبردار۔ ۔۔۔۔۔۔تھہ غلام نبی
    ۱۱۶ ۔محمد اسمٰعیل غلام کبریا صاحب فرزند رشید مولوی محمد احسن صاحب امروہی۔
    ۱۱۷۔ احمد حسن صاحب فرزند رشید مولوی محمد احسن
    صاحب امروہی۔
    ۱۱۸۔ سیٹھ احمد صاحب عبد الرحمن حاجی اللہ رکھا
    تاجرمدراس۔
    ۱۱۹ ۔ سیٹھ صالح محمد حاجی اللہ رکھا تاجر مدراس
    ۱۲۰۔ سیٹھ ابراہیم صاحب صالح محمد حاجی اللہ رکھا؍؍
    ۱۲۱ ۔سیٹھ عبد الحمید صاحب حاجی ایوب حاجی اللہ رکھا؍؍
    ۱۲۲۔ حاجی مہدی صاحب عربی بغدادی نزیل ؍؍
    ۱۲۳۔سیٹھ محمد یوسف صاحب حاجی اللہ رکھا ؍؍
    ۱۲۴۔ مولوی سلطان محمود صاحب میلا پور ؍؍
    ۱۲۵۔ حکیم محمد سعید صاحب ؍؍
    ۱۲۶۔ منشی قادر علی صاحب ؍؍
    ۱۲۷۔ منشی غلام دستگیر صاحب ؍؍
    ۱۲۸۔ منشی سراج الدین صاحب ترمل کہیڑی ؍؍
    ۱۲۹۔ قاضی غلام مرتضیٰ صاحب اکسٹرا اسسٹنٹ
    کمشنر مظفر گڑھ حال پنشنر
    ۱۳۰۔ مولوی عبد القادر خان صاحب جمالپور۔ لودیانہ
    ۱۳۱۔ مولوی عبد القادر صاحب۔ خاص لودیانہ
    ۱۳۲۔ مولوی رحیم اللہ صاحب مرحوم ۔۔۔ لاہور
    ۱۳۳۔ مولوی غلام حسین صاحب ۔۔۔ ؍؍
    ۱۳۴۔مولوی غلام نبی صاحب مرحوم خوشاب شاہ پور
    ۱۳۵۔ مولوی محمد حسین صاحب علاقہ ریاست کپور تھلہ
    ۱۳۶۔مولوی شہاب الدین صاحب غزنوی۔ کابلی


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 327
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 327
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/327/mode/1up
    327
    ۱۳۷۔ مولوی سید محمد تفضل حسین صاحب
    اکسٹرا اسٹنٹ۔ علی گڑھ ضلع فرخ آباد
    ۱۳۸۔ منشی صادق حسین صاحب مختار۔۔۔۔ اٹاوہ
    ۱۳۹۔ شیخ مولوی فضل حسین صاحب احمد آبادی۔ جہلم
    ۱۴۰۔ میاں عبد العلی موضع عبد الرحمن ضلع شاہ پور
    ۱۴۱۔ منشی نصیر الدین صاحب لونی۔ حال حیدر آباد
    ۱۴۲۔ قاضی محمد یوسف صاحب قاضی کوٹ۔ گوجرانوالہ
    ۱۴۳۔ قاضی فضل الدین صاحب ؍؍ ؍؍
    ۱۴۴۔ قاضی سراج الدین صاحب ؍؍ ؍؍
    ۱۴۵۔ قاضی عبد الرحیم صاحب فرزند رشید قاضی
    ضیاء الدین صاحب کوٹ قاضی۔ گوجرانوالہ
    ۱۴۶۔ شیخ کرم الٰہی صاحب کلرک ریلوے۔ پٹیالہ
    ۱۴۷۔ میرزا عظیم بیگ صاحب مرحوم۔ سامانہ۔ پٹیالہ
    ۱۴۸۔ میرزا ابراہیم بیگ صاحب مرحوم ؍؍ ؍؍
    ۱۴۹۔ میاں غلام محمد طالب علم مچہرالہ۔ ۔۔۔لاہور
    ۱۵۰۔ مولوی محمد فضل صاحب چنگا۔ ۔۔۔گوجر خاں
    ۱۵۱۔ ماسٹر قادر بخش صاحب لدھیانہ
    ۱۵۲۔ منشی الہ بخش صاحب۔ ؍؍ ؍؍
    ۱۵۳۔ حاجی ملا نظام الدین صاحب ؍؍
    ۱۵۴۔ عطاء الٰہی غوث گڈہ۔۔۔۔۔۔۔ پٹیالہ
    ۱۵۵۔ مولوی نور محمد صاحب مانگٹ ؍؍
    ۱۵۶۔ مولوی کریم اللہ صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔امرتسر
    ۱۵۷۔ سید عبد الہادی صاحب سولن۔۔۔۔ شملہ
    ۱۵۸۔ مولوی محمد عبد اللہ خان صاحب۔ پٹیالہ
    ۱۵۹۔ ڈاکٹر عبد الحکیم خاں صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍
    ۱۶۰۔ ڈاکٹر بوڑے خان صاحب۔ قصور۔ ضلع لاہور
    ۱۶۱۔ڈاکٹر خلیفہ رشید الدین صاحب لاہور۔ حال چکراتہ
    ۱۶۲ ۔غلام محی الدین خان صاحب فرزند ڈاکٹر بوڑے خان صاحب
    ۱۶۳۔مولوی صفدر حسین صاحب۔ حیدر آباد دکن
    ۱۶۴۔ خلیفہ نور دین صاحب۔۔۔۔ جموں
    ۱۶۵۔ میاں اللہ دتا صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۱۶۶۔ منشی عزیز الدین۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کانگڑہ
    ۱۶۷۔ سید مہدی حسین صاحب علاقہ پٹیالہ
    ۱۶۸۔ مولوی حکیم نور محمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔موکل
    ۱۶۹۔ حافظ محمد بخش مرحوم۔ ۔۔۔۔۔۔ کوٹ قاضی
    ۱۷۰۔ چوہدری شرف الدین صاحب۔ کوٹلہ فقیر۔ جہلم
    ۱۷۱۔ میاں رحیم بخش صاحب۔۔۔۔۔۔۔ امرتسر
    ۱۷۲۔ مولوی محمد افضل صاحب کملہ۔ گجرات
    ۱۷۳۔ میاں اسمٰعیل صاحب۔۔۔۔ امرتسری
    ۱۷۴۔ مولوی غلام جیلانی صاحب گھڑونواں۔ جالندھر
    ۱۷۵۔منشی امانت خان صاحب۔ نادون۔ کانگڑہ
    ۱۷۶۔ قاری محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جہلم
    ۱۷۷۔ میاں کرم داد معہ اہل بیت۔ قادیان
    ۱۷۸۔ حافظ نور احمد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لودیانہ
    ۱۷۹۔ میاں کرم الٰہی صاحب۔۔۔۔۔۔۔ لاہور
    ۱۸۰۔ میاں عبد الصمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ نارووال
    ۱۸۱۔ میاں غلام حسین معہ اہلیہ۔۔۔۔۔۔۔ رہتاس
    ۱۸۲۔ میاں نظام الدین صاحب۔۔۔۔۔۔ جہلم
    ۱۸۳۔ میاں محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جہلم
    ۱۸۴۔ میاں علی محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۱۸۵۔ میاں عباس خاں۔ کہوہار۔ ۔۔۔گجرات
    ۱۸۶۔ میاں قطب الدین صاحب۔ کوٹلہ فقیر۔ جہلم
    ۱۸۷۔میاں اللہ دتا خان صاحب اڑیالہ۔ ۔۔۔ ؍؍
    ۱۸۸۔ محمد حیات صاحب۔ چک جانی ۔۔۔ ؍؍
    ۱۸۹۔ مخدوم مولوی محمد صدیق صاحب۔ بھیرہ
    ۱۹۰۔ عبد المغنی صاحب فرزند رشید مولوی برہان الدین صاحب جہلمی
    ۱۹۱ ۔ قاضی چراغ الدین۔ کوٹ قاضی۔ گوجرانوالہ
    ۱۹۲۔ میاں فضل الدین صاحب قاضی کوٹ
    ۱۹۳۔ میاں علم الدین صاحب کوٹلہ فقیر۔ جہلم
    ۱۹۴۔ قاضی میر محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ کوٹ کھلیان
    ۱۹۵۔ میاں اللہ دتا صاحب۔۔۔ نت۔ گوجرانوالہ
    ۱۹۶۔ میاں سلطان محمد صاحب۔۔۔ ؍؍
    ۱۹۷۔ مولوی خان ملک صاحب کھیوال
    ۱۹۸۔ میاں الہ بخش صاحب علاقہ بند۔ امرتسر
    ۱۹۹۔ مولوی عنایت اللہ مدرس ۔۔۔ مانانوالہ
    ۲۰۰۔ منشی میرا بخش صاحب ۔۔۔ گوجرانوالہ
    ۲۰۱۔ مولوی احمد جان صاحب مدرس ؍؍
    ۲۰۲۔ مولوی حافظ احمد دین چک سکندر گجرات
    ۲۰۳۔ مولوی عبد الرحمن صاحب کہیوال۔ جہلم
    ۲۰۴۔ میاں مہر دین صاحب۔۔۔۔ لالہ موسیٰ
    ۲۰۵۔ میاں ابراہیم صاحب پنڈوری۔ جہلم
    ۲۰۶۔ سید محمود شاہ صاحب فتح پور۔ گجرات
    ۲۰۷۔ محمد جو صاحب۔۔۔۔ امرتسر
    ۲۰۸۔ منشی شاہ دین صاحب۔ دینا۔ جہلم
    ۲۰۹۔ منشی روشن دین صاحب۔ ڈنڈوت۔ ؍؍
    ۲۱۰۔ حکیم فضل الٰہی صاحب۔۔۔۔ لاہور
    ۲۱۱ ۔شیخ عبد اللہ دیوانچند صاحب کمپونڈر ؍؍
    ۲۱۲۔ منشی محمد علی صاحب ؍؍
    ۲۱۳۔ منشی امام الدین صاحب کلرک ؍؍
    ۲۱۴۔ منشی عبد الرحمن صاحب ؍؍ ۔۔۔ ؍؍
    ۲۱۵۔خواجہ جمال الدین صاحب بی اے لاہور حال جموں
    ۲۱۶۔ منشی مولا بخش صاحب کلرک۔۔۔ لاہور
    ۲۱۷۔ شیخ محمد حسین صاحب مراد آبادی۔۔۔ پٹیالہ
    ۲۱۸۔ عالم شاہ صاحب کھاریاں۔۔۔۔۔۔ گجرات
    ۲۱۹۔ مولوی شیر محمد صاحب ہوہن۔۔۔ شاہپور
    ۲۲۰ ۔ میاں محمد اسحٰق صاحب اوورسیر بھیرہ۔ حال ممباسہ
    ۲۲۱۔ میرزا اکبر بیگ صاحب۔۔۔۔ کلانور
    ۲۲۲۔ مولوی محمد یوسف صاحب۔۔۔۔ سنور
    ۲۲۳۔ میاں عبد الصمد صاحب۔۔۔۔ ؍؍
    ۲۲۴۔ منشی عطا محمد صاحب۔۔۔۔۔۔ سیالکوٹ
    ۲۲۵۔ شیخ مولا بخش صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۲۲۶۔سید خصیلت علی شاہ صاحب ڈپٹی انسپکٹر ڈنگہ
    ۲۲۷۔منشی رستم علی صاحب کورٹ انسپکٹر گورداسپورہ
    ۲۲۸۔ سید احمد علی شاہ صاحب۔۔۔۔۔۔ سیالکوٹ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 328
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 328
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/328/mode/1up
    328
    ۲۲۹۔ ماسٹر غلام محمد صاحب سیالکوٹ
    ۲۳۰۔ حکیم محمد دین صاحب۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۲۳۱۔ میاں غلام محی الدین صاحب ؍؍
    ۲۳۲۔ میاں عبد العزیز صاحب ؍؍
    ۲۳۳۔ منشی محمد دین صاحب ؍؍
    ۲۳۴۔ منشی عبد المجید صاحب اوجلہ۔ گورداسپور
    ۲۳۵۔ میاں خدا بخش صاحب۔ بٹالہ ؍؍
    ۲۳۶۔منشی حبیب الرحمن صاحب حاجی پور۔ کپور تھلہ
    ۲۳۷۔محمد حسین صاحب لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ
    ۲۳۸۔منشی زین الدین محمد ابراہیم۔ انجینئر۔ بمبئی
    ۲۳۹۔سید فضل شاہ صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور
    ۲۴۰۔ سید ناصر شاہ صاحب سب اوورسیر۔ اوڑی کشمیر
    ۲۴۱۔ منشی عطا محمد صاحب چنیوٹ جھنگ
    ۲۴۲۔ شیخ نور احمد صاحب جالندھر۔حال ممباسہ
    ۲۴۳۔ منشی سرفراز خان صاحب۔ جھنگ
    ۲۴۴۔ مولوی سید محمد رضوی صاحب۔ حیدر آباد
    ۲۴۵۔ مفتی فضل الرحمن صاحب معہ اہلیہ۔ بھیرہ
    ۲۴۶۔ حافظ محمد سعید صاحب بھیرہ۔ حال لندن
    ۲۴۷۔ مستری قطب الدین صاحب بھیرہ
    ۲۴۸۔ مستری عبد الکریم صاحب ؍؍
    ۲۴۹۔ مستری غلام الٰہی صاحب ؍؍
    ۲۵۰۔ میاں عالم دین صاحب ؍؍
    ۲۵۱۔ میاں محمد شفیع صاحب ؍؍
    ۲۵۲۔ میاں نجم الدین صاحب ؍؍
    ۲۵۳۔ میاں خادم حسین صاحب ؍؍
    ۲۵۴۔ بابو غلام رسول صاحب ؍؍
    ۲۵۵۔ شیخ عبدا لرحمن صاحب نومسلم ؍؍
    ۲۵۶۔ مولوی سردار محمد صاحب لون میانی
    ۲۵۷۔ مولوی دوست محمد صاحب ؍؍
    ۲۵۸۔ مولوی حافظ محمد صاحب بھیرہ۔ حال کشمیر
    ۲۵۹۔ مولوی شیخ قادر بخش صاحب۔ احمد آباد
    ۲۶۰۔ منشی اللہ داد صاحب کلرک چھاؤنی شاہپور
    ۲۶۱۔ میاں حاجی وریام خوشاب
    ۲۶۲۔ حافظ مولوی فضل دین صاحب ؍؍
    ۲۶۳۔ سید دلدار علی صاحب۔بلہور۔۔۔ کانپور
    ۲۶۴۔ سید رمضان علی صاحب ۔ ؍؍ ؍؍
    ۲۶۵۔ سید جیون علی صاحب پلول۔ حال الہ آباد
    ۲۶۶۔ سید فرزند حسین صاحب چاند پور۔ ؍؍
    ۲۶۷۔ سید اہتمام علی صاحب۔ موہر ونڈا۔ ؍؍
    ۲۶۸۔حاجی نجف علی صاحب۔ کٹٹرہ محلہ۔ الہ آباد
    ۲۶۹۔شیخ گلاب صاحب ؍؍ ؍؍
    ۲۷۰۔شیخ خدا بخش صاحب ؍؍ ؍؍
    ۲۷۱۔ حکیم محمد حسین صاحب لاہور
    ۲۷۲۔ میاں عطا محمد صاحب سیالکوٹ
    ۲۷۳۔ میاں محمد دین صاحب جموں
    ۲۷۴۔ میاں محمد حسن صاحب عطار لدہیانہ
    ۲۷۵۔سید نیاز علی صاحب۔ مدایوان حال رامپور
    ۲۷۶۔ ڈاکٹر عبد الشکور صاحب۔۔۔۔ سرسہ
    ۲۷۷۔شیخ حافظ الہ دین صاحب بی اے جہاوریاں
    ۲۷۸۔ میاں عبد السبحان۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور
    ۲۷۹۔ میاں شہامت خاں ۔۔۔۔۔۔ نادون
    ۲۸۰۔مولوی عبد الحکیم صاحب دھار وار علاقہ بمبئی
    ۲۸۱۔ قاضی عبد اللہ صاحب کوٹ قاضی
    ۲۸۲۔ عبد الرحمن صاحب پٹواری سنوری
    ۲۸۳۔ برکت علی صاحب مرحوم۔ تھہ غلام نبی
    ۲۸۴۔ شہاب الدین صاحب ؍؍
    ۲۸۵۔ صاحب دین صاحب طہال۔ گجرات
    ۲۸۶۔ مولوی غلام حسن مرحوم۔۔۔۔۔۔ دینہ نگر
    ۲۸۷۔ نواب دین صاحب مدرس ۔۔۔ دینا نگر
    ۲۸۸۔احمد دین صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منارہ
    ۲۸۹۔ عبد اللہ صاحب قرآنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور
    ۲۹۰۔ کرم الٰہی صاحب کمپازیٹر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍
    ۲۹۱۔ سید محمد آفندی ترکی
    ۲۹۲۔ عثمان عرب صاحب طائف شریف
    ۲۹۳۔ عبد الکریم صاحب مرحوم۔۔۔۔ چمارو
    ۲۹۴۔ عبد الوہاب صاحب بغدادی
    ۲۹۵۔میاں کریم بخش صاحب مرحوم مغفور جمال پور ضلع لدھیانہ۔
    ۲۹۶۔عبد العزیز صاحب عرف عزیز الدین ناسنگ
    ۲۹۷ ۔ حافظ غلام محی الدین صاحب بھیرہ حال قادیان
    ۲۹۸۔محمد اسمٰعیل صاحب نقشہ نویس کالکا ریلوے
    ۲۹۹۔ احمد دین صاحب ۔چک۔ کھاریاں
    ۳۰۰۔ محمد امین کتاب فروش جہلم
    ۳۰۱۔ مولوی محمود حسن خان صاحب مدرس ملازم پٹیالہ
    ۳۰۲۔ محمد رحیم الدین حبیب والہ
    ۳۰۳۔ شیخ حرمت علی صاحب کراری الہ آباد
    ۳۰۴۔ میاں نور محمد صاحب غوث گڑھ۔۔۔ پٹیالہ
    ۳۰۵۔ مستری اسلام احمد صاحب۔۔۔ بھیرہ
    ۳۰۶۔ حسینی خاں صاحب۔۔۔۔۔۔ الہ آباد
    ۳۰۷۔ قاضی رضی الدین صاحب۔۔۔ اکبر آباد
    ۳۰۸۔ سعد اللہ خان صاحب۔۔۔۔۔۔ الہ آباد
    ۳۰۹۔مولوی عبد الحق صاحب ولد مولوی فضل حق
    صاحب مدرس سامانہ پٹیالہ
    ۳۱۰۔ مولوی حبیب اللہ صاحب مرحوم محافظ دفتر پولیس۔ جہلم
    ۳۱۱۔ رجب علی صاحب پنشنر ساکن جہونسی کہنہ
    ضلع الہ آباد
    ۳۱۲۔ ڈاکٹر سید منصب علی صاحب پنشنر۔ الہ آباد
    ۳۱۳۔میاں کریم اللہ صاحب سارجنٹ پولس جہلم
    **


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 329
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 329
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/329/mode/1up
    329
    اب دیکھو یہ تین سو تیرہ مخلص جو اس کتاب میں درج ہیں یہ اسی پیشگوئی کا مصداق ہے جو احادیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں پائی جاتی ہے۔ پیشگوئی میں کدعہ کا لفظ بھی ہے جو صریح قادیان کے نام کو بتلا رہا ہے پس تمام مضمون اس حدیث کا یہ ہے کہ وہ مہدی موعود قادیان میں پیدا ہوگا۔ اور اس کے پاس ایک کتاب چھپی ہوئی ہوگی۔ جس میں تین سو ۳۱۳تیرہ اس کے دوستوں کے نام درج ہوں گے۔ سو ہریک شخص سمجھ سکتا ہے کہ یہ بات میرے اختیار میں تو نہیں تھی کہ میں ان کتابوں میں جو اس زمانہ سے ہزار برس پہلے دنیا میں شائع ہوچکی ہیں اپنے گاؤں قادیان کا نام لکھ دیتا۔ اور نہ میں نے چھاپہ کی کل نکالی ہے تا یہ خیال کیا جائے کہ میں نے اس غرض سے مطبع کو اس زمانہ میں ایجاد کیا ہے۔ اور نہ تین سو تیرہ مخلص اصحاب کا پیدا کرنا میرے اختیار میں تھا بلکہ یہ تمام اسباب خود خدا تعالیٰ نے پیدا کئے ہیں تاوہ اپنے رسول کریم کی پیشگوئی کو پورا کرے۔
    مگر اس زمانہ کے مولویوں کی حالت پر سخت افسوس ہے کہ وہ نہیں چاہتے کہ کوئی پیشگوئی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری ہو۔ آتھم کی نسبت کیسی صفائی سے پیشگوئی پوری ہوئی۔ خداتعالیٰ کی الہامی شرط کے موافق اول آتھم سودائیوں کی طرح ڈرتا پھرا۔ اور بباعث شدت خوف شرط سے فائدہ اٹھایا۔ آخر بیباکی کی حالت میں خدا تعالیٰ کے قطعی الہام کے موافق واصل جہنم ہوا۔ اور یہی پیشگوئی تھی جس کی براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں بھی اب سے ستر۱۷ہ پہلے خبر دی گئی تھی۔ سو جیسا کہ اس پیشگوئی کی تکذیب میں پادریوں نے جھوٹ کی نجاست کھائی۔ عبد الحق اور عبد الجبار غزنویان وغیرہ مخالف مولویوں نے بھی وہ نجاست کھائی اور جیسا کہ عیسائیوں نے اسلام پر حملہ کیا انہوں نے بھی اسلام پر حملہ کیا۔ کیونکہ یہ نشان اسلام کی تائید میں تھا۔ سو ان لوگوں نے اسلام کی کچھ پرواہ نہ کی اور کچھ بھی حیا اور شرم اور تقویٰ سے کام نہ لیا۔ اسی لئے تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان لوگوں کا نام یہودی رکھا۔ اگر یہ لوگ آتھم کے بارے میں کوئی سچی نکتہ چینی کرتے تو ہمیں کچھ افسوس نہ تھا مگر ان لوگوں نے تو اس سچائی پر تھوکا جو آفتاب کی طرح چمک رہی تھی۔ عبد الحق غزنوی بار بار لکھتا ہے کہ پادریوں کی فتح ہوئی۔ ہم اس کے جواب میں بجز اس کے کیا کہیں اور کیا لکھیں کہ اے بدذات یہودی صفت پادریوں کا اس میں منہ کالا ہوا اور ساتھ ہی تیرا بھی۔ اور پادریوں پر ایک آسمانی *** پڑی اور ساتھ ہی وہ *** تجھ کو بھی کھا گئی۔ اگر تو سچا ہے تو اب ہمیں دکھلا کہ آتھم کہاں ہے۔ اے خبیث کب تک تو جئے گا۔ کیا تیرے لئے ایک دن موت کا مقرر نہیں۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 330
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 330
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/330/mode/1up
    330
    ایسا ہی ذرہ انصاف کرنا چاہیئے کہ کس قوت اور چمک سے کسوف اور خسوف کی پیشگوئی پوری ہوئی۔ اور ہمارے دعویٰ پر آسمان نے گواہی دی۔ مگر اس زمانہ کے ظالم مولوی اس سے بھی منکر ہیں۔ خاص کر رئیس الدجالین عبد الحق غزنوی اور اس کا تمام گروہ۔ علیھم نعال لعن اللّٰہ الف الف مرّۃ۔ اپنے ناپاک اشتہار میں نہایت اصرار سے کہتا ہے کہ یہ پیشگوئی بھی پوری نہیں ہوئی اے پلید دجال! پیشگوئی تو پوری ہوگئی۔ لیکن تعصب کے غبار نے تجھ کو اندھا کردیا۔ پیشگوئی کے اصل لفظ جو امام محمد باقر سے دار قطنی میں مروی ہیں یہ ہیں۔ ’’انّ لمھدینا آیتین لم تکونا منذ خلق السّماوات والارض ینکسف القمر لاوّل لیلۃ من رمضان وتنکسف الشمس فی النصف منہ الخ۔‘‘ یعنی ہمارے مہدی کی تائید اور تصدیق کے لئے دو نشان مقرر ہیں۔ اور جب سے کہ زمین و آسمان پیدا کئے گئے وہ دو نشان کسی مدعی کے وقت ظہور میں نہیں آئے۔ اور وہ یہ ہیں کہ مہدی کے ادعا کے وقت میں چاند اس پہلی رات میں گرہن ہوگا۔ جو اس کے خسوف کی تین راتوں میں سے پہلی رات ہے یعنی تیرھویں رات۔ اور سورج اس کے گرہن کے دنوں میں سے اس دن گرہن ہوگا جو درمیان کا دن ہے یعنی اٹھائیس۲۸ تاریخ کو اور جب سے دنیا پیدا ہوئی ہے کسی مدعی کے لئے یہ اتفاق نہیں ہوا کہ اس کے دعویٰ کے وقت میں خسوف کسوف رمضان میں ان تاریخوں میں ہوا ہو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ فرمانا اس غرض سے نہیں تھا کہ وہ خسوف کسوف قانون قدرت کے برخلاف ظہور میں آئے گااور نہ حدیث میں کوئی ایسا لفظ ہے بلکہ صرف یہ مطلب تھا کہ اس مہدی سے پہلے کسی مدعی صادق یا کاذب کو یہ اتفاق نہیں ہوا ہوگا کہ اس نے مہدویت یا رسالت کا دعویٰ کیا ہو اور اس کے وقت میں ان تاریخوں میں رمضان میں خسوف کسوف ہوا ہو۔ پس ان مولویوں کو چاہیئے تھا کہ اگر اس پیشگوئی کی صحت میں شک تھا تو ایسی کوئی نظیر سابق زمانہ میں سے بحوالہ کسی کتاب کے پیش کرتے جس میں لکھا ہوتا کہ پہلے ایسا دعویٰ ہوچکا ہے اور اس کے وقت میں ایسا خسوف کسوف بھی ہوچکا ہے مگر اس طرف تو انہوں نے رخ بھی نہیں کیا۔ اور یہ احمقانہ عذر پیش کردیا ہے کہ اس پیشگوئی کے یہ معنی ہیں کہ چاند کو رمضان کی پہلی رات میں گرہن لگے گا۔ اور پندرہ تاریخ کو سورج گرہن ہوگا۔ لاحول ولا قوہ ان احمقوں نے یہ معنی کس لفظ سے سمجھ لئے اے نادانوں! آنکھوں کے اندھو! مولویت کو بدنام کرنے والو! ذرہ سوچو!


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 331
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 331
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/331/mode/1up
    331
    کہ حدیث میں چاند گرہن میں قمر کا لفظ آیا ہے۔ پس اگر یہ مقصود ہوتا کہ پہلی رات میں چاند گرہن ہوگا توحدیث میں قمر کا لفظ نہ آتا بلکہ ہلال کا لفظ آتا کیونکہ کوئی شخص اہل لغت اور اہل زبان میں سے پہلی رات کے چاند پر قمر کا لفظ اطلاق نہیں کرتا بلکہ وہ تین رات تک ہلال کے نام سے موسوم ہوتا ہے۔ پس ایک ایماندار کے لئے یہ ایک بدیہی قرینہ ہے کہ اس جگہ پہلی رات سے مہینہ کی پہلی رات مراد نہیں۔ بلکہ چاند گرہن کی پہلی رات مراد ہے۔ اگر مہینہ کی پہلی رات مراد ہوتی تو اس جگہ ہلال کا لفظ چاہیئے تھا نہ قمر کا۔ گویا یوں عبارت چاہیئے تھی کہ ینکسف الھلال لِاَوّل لیلۃ۔ سوا ب سوچنا چاہیئے کہ یہ لوگ ا س علمیت کے ساتھ مولوی کہلاتے ہیں اب تک یہ بھی خبر نہیں کہ پہلی رات کے چاند کو عربی زبان میں کیا کہتے ہیں۔
    اور یہ خیال کہ اس حدیث میں جو یہ فقرہ ہے کہ لم تکونا منذ خلق السّمٰوات والارض اس سے سمجھا جاتا ہے کہ یہ خسوف و کسوف بطور خارق ہوگا نہ ایسا خسوف کسوف جو منجمین کے نزدیک معلوم و معروف ہے۔ یہ وہم بھی اس بات پر قطعی دلیل ہے کہ یہ لوگ علم عربی اور عالمانہ تدبر سے بالکل بے نصیب اور بے بہرہ ہیں۔ یہودیوں کے لئے خدا نے اس گدھے کی مثال لکھی ہے جس پر کتابیں لدی ہوئی ہوں مگر یہ خالی گدھے ہیں اور اس شرف سے بھی محروم ہیں جو ان پر کوئی کتاب ہو۔ ہریک عقلمند جس کو ذرہ انسانی عقل میں سے حصہ ہو سمجھ سکتا ہے کہ اس جگہ لم تکونا کا لفظ آیتین سے متعلق ہے جس کے یہ معنے ہیں کہ یہ دونوں نشان بجز مہدی کے پہلے اس سے اور کسی کو عطا نہیں کئے گئے۔ پس اس جگہ یہ کہاں سے سمجھا گیا کہ یہ کسوف خسوف خارق عادت ہوگا۔ بھلا اس میں وہ کونسا لفظ ہے۔ جس سے خارق عادت سمجھا جائے۔ اور جبکہ مطلوب صرف یہ بات تھی کہ ان تاریخوں میں کسوف خسوف رمضان میں ہونا کسی کے لئے اتفاق نہیں ہوا۔ صرف مہدی موعود کے لئے اتفاق ہوگا تو پھر کیا حاجت تھی کہ خدا تعالیٰ اپنے قدیم نظام کے برخلاف چاند گرہن پہلی رات میں جبکہ خود چاند کالعدم ہوتا ہے کرتا۔ خدا نے قدیم سے چاند گرہن کے لئے ۱۳۔ ۱۴۔ ۱۵ اور سورج گرہن کے لئے ۲۷۔ ۲۸۔ ۲۹ (تاریخیں) مقرر کررکھی ہیں۔ سو پیشگوئی کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ یہ نظام اس روز ٹوٹ جائے گا۔ جو شخص ایسا سمجھتا ہے وہ گدھا ہے نہ انسان پیشگوئی کے لفظ صاف ہیں جن سے صریح ثابت ہوتا ہے کہ لم تکوناکے لفظ سے صرف یہ مطلب ہے کہ مہدی موعود کو ایک عزت دی جائے اور اس


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 332
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 332
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/332/mode/1up
    332
    نشان کو اس کے لئے خاص کردیا جائے۔ سو پیشگوئی کا بھی مفہوم یہی ہے کہ یہ نشان کسی دوسرے مدعی کو نہیں دیا گیا خواہ صادق ہو یا کاذب۔ صرف مہدی موعود کو دیا گیا ہے۔ اگر یہ ظالم مولوی اس قسم کا خسوف کسوف کسی اور مدعی کے زمانہ میں پیش کرسکتے ہیں تو پیش کریں۔ اس سے بیشک میں جھوٹا ہوجاؤں گا۔ ورنہ میری عداوت کے لئے اس قدر عظیم الشان معجزہ سے انکار نہ کریں۔
    اے اسلام کے عار مولویو! ذرہ آنکھیں کھولو۔ اور دیکھو کہ کس قدر تم نے غلطی کی ہے۔ جہالت کی زندگی سے تو موت بہتر ہے۔ صاف ظاہر ہے کہ اس حدیث میں کسوف خسوف کو بے نظیر نہیں ٹھہرایا گیا بلکہ اس نسبت کو بے نظیر ٹھہرایا گیا ہے جو مہدی کے ساتھ اس کو واقع ہے۔ یعنی مطلب یہ ہے کہ اس طور کا خسوف کسوف جو اپنی تاریخوں اور مہینہ کے لحاظ سے مہدی کے ساتھ تعلق رکھتا ہے۔ یہ تعلق اس کا پہلے اس سے بھی کسی دوسرے کے ساتھ نہیں ہوا۔ اور تفسیر اس قول کی اس طرح پر ہے کہ ان لمھدینا آیتین لم تکونا لاحد منذ خلق السّمٰوات والارض۔ پس اس جگہ غرض تو یہ ہے کہ یہ دو نشان اس خصوصیت کے ساتھ مہدی کو دیئے گئے ہیں پہلے اس سے کسی کو نہیں دئے گئے اور لم تکونا کا لفظ آیتین کی تشریح کرتا ہے کہ وہ مہدی کے ساتھ خاص کئے گئے ہیں۔ خسوف کسوف کی کوئی نرالی حالت بیان کرنا منظور نہیں بلکہ اس عبارت میں دونوں نشانوں کی مہدی کے ساتھ تخصیص منظور ہے۔ نہ یہ کہ خسوف کسوف کی کوئی نرالی حالت بیان کی جائے۔ اور اگر نرالی حالت بیان کرنا منظور ہوتا تو عبارت یوں چاہیئے تھی کہ ینکسف القمر والشمس علی نہج ما انکسفا منذ خلق السّمٰوات والارض یعنی ایسے طور سے چاند اور سورج کا گرہن ہوگا کہ پہلے اس سے جب سے آسمان و زمین پیدا کیا گیا ہے ایسا خسوف کسوف کبھی نہیں ہوا۔ اب میں نے خوب تشریح کرکے اصل معنوں کو ننگا کرکے دکھلا دیا ہے۔ اب بھی اگر کوئی نہ سمجھے گا تو وہ پاگل کہلائے گا۔
    اور اگرچہ پیشگوئی کے لفظوں سے یہ بات ہرگز نہیں نکلتی کہ خسوف کسوف کوئی نرالے طور پر ہوگا مگر خدا تعالیٰ نے ان مولویوں کا منہ کالا کرنے کے لئے اس خسوف کسوف میں بھی ایک امر خارق عادت رکھا ہے۔ چنانچہ مارچ ۱۸۹۴ء پایونیر اور سول ملٹری گزٹ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 333
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 333
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/333/mode/1up
    333
    نے اقرار کیا ہے کہ یہ خسوف و کسوف جو ۶؍ اپریل ۱۸۹۴ء کو ہوگا۔ یہ ایک ایسا عجیب ہے کہ پہلے اس سے اس شکل اور صورت پر کبھی نہیں ہوا۔‘‘ دیکھو کفار گواہی دیتے ہیں کہ یہ کسوف خسوف خارق عادت ہے اور مولوی اعتراض کررہے ہیں۔ !!!
    چو کافر شناساتر از مولویست

    بریں مولویت بباید گریست
    پھر ایک اور اعتراض سادہ لوح عبد الحق کا یہ ہے کہ ’’محدثین نے دار قطنی کی اس حدیث کے بعض راویوں پر جرح کیا ہے اس لئے یہ حدیث صحیح نہیں ہے۔‘‘ لیکن اس احمق کو سمجھنا چاہیئے کہ حدیث نے اپنی سچائی کو آپ ظاہر کردیا ہے کیونکہ اس کی پیشگوئی پوری ہوگئی۔ پس اس صورت میں جرح سے حدیث کا کچھ نقصان نہیں ہوا۔ بلکہ جنہوں نے جرح کیا ہے ان کی حماقت ظاہر ہوئی۔ راویوں کی تنقید اور ان کا جرح ایک ظنی امر ہے۔ اور ایک پیشگوئی کا پورا ہو جانا اور اس کا صدق مشاہدہ میں آجانا یقینی امر ہے اور ظن یقین کو اٹھا نہیں سکتا۔ رؤیت روایت پر مقدم ہے۔ مثلاً ایک بڑے معتبر راوی نے ایک جگہ بیان کیا کہ عبد الحق غزنوی فوت ہوگیا ہے پھر اتنے میں تم خود اس مجلس میں حاضر ہوگئے۔ تو اب میں پوچھتا ہوں کہ ان مجلس والوں کو جن کے پاس ایک معتبر روایت تمہاری موت کی پہنچ چکی تھی۔ کیا کرنا چاہیئے؟ کیا تمہارا جنازہ پڑھا جائے یا زندہ دیکھ کر روایتوں کو رد کیا جائے۔ اے کسی جنگل کے وحشی! خبر معاینہ کے برابر نہیں ہوسکتی۔ کیا تو نے لیس الخبر کالمعاینۃ کبھی نہیں سنا۔ آثار اور احادیث جو آحاد ہیں وہ مفید ظن ہے اور معاینہ مفید یقین ہے۔ پس کیا ظن یقین کو کچھ نقصان پہنچا سکتا ہے۔ فرض کیا کہ اس حدیث میں کوئی راوی کذّاب ہے مفتری ہے شیعہ ہے۔ مگر جبکہ یہ پیشگوئی پوری ہوگئی تو اس طریق سے حدیث کی صحت پر شہادت پیدا ہوگئی۔ کسی کا کاذب ہونا قطعی طور پر اس کی روایت کو ردّ نہیں کر سکتا۔ کبھی کاذب بھی سچ بول سکتا ہے۔ دنیا میں ایسے لوگ بہت کم ہیں جنہوں نے ساری عمر جھوٹ نہ بولا ہو۔ تو کیا یقینی طور پر ان کی گواہی کو ردّ کر سکتے ہیں۔ پس ذرہ شرم کرو اور اپنے گریبان میں منہ ڈال کر دیکھو کہ تم نے اس حدیث کے دو راویوں عمرو اور جابر جعفی کو جھوٹا ٹھہرایا مگر ان کا جھوٹ ثابت نہیں۔ کسی نے ان کے جھوٹ کا شرعی ثبوت پیش نہیں کیا۔ بلکہ ان کی یہ روایت کسوف خسوف سچی نکلی۔ مگر تمہارا گندہ جھوٹ ایسی صفائی سے ثابت ہوگیا کہ تم عند الشرع سخت سزا کے لائق ٹھہر گئے اور وہ جھوٹ یہ ہے کہ تم نے حقیقت کو چھپانے کے لئے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے معجزہ کو باطل ٹھہرانے کی نیت سے گرہن کی تاریخوں کو بدل ڈالا۔ سورج چاند کا گرہن جس کی نسبت پیشگوئی ہے تمام


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 334
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 334
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/334/mode/1up
    334
    ہندو مسلمان عیسائی جانتے ہیں اور اخباروں اور جنتریوں میں مندرج ہے کہ وہ اس طرح پر واقعہ ہوا کہ چاند گرہن تیرہ ۱۳رمضان کو ہوا اور سورج گرہن اٹھائیس رمضان کو۔ جیسا کہ ہم نے اپنے رسالہ نورالحق میں اسی وقت چھاپ دیا تھا۔ مگر تم نے حق کو چھپانے کیلئے یہ جھوٹ کا گوہ کھایا کہ اپنے اس اشتہار میں جس کا عنوان صیانۃ الاناس عن شر الوسواس الخناس ہے چاند گرہن کی تاریخ بجائے تیرہ ۱۳رمضان کے چود۱۴ہ رمضان لکھ دی اور سورج گرہن کی تاریخ بجائے اٹھائیس۲۸ رمضان کے انتیس۲۹ رمضان لکھ دی۔ پس اے بدذات خبیث دشمن اللہ رسول کے تو نے یہ یہودیانہ تحریف اسی لئے کی کہ تا یہ عظیم الشان معجزہ پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کا دنیا پر مخفی رہے۔ جابر اور عمرو بن ثمر کا جھوٹ تو ہرگز ثابت نہیں ہوا۔ بلکہ سچ ثابت ہوا۔ مگر تیرا جھوٹ اے نابکار پکڑا گیا۔ جابر اور عمرو کا سچا ہونا کسوف خسوف سے ثابت ہوگیا۔ اور رؤیت نے روایت کے ضعف کو دور کردیا۔ اب جو شخص ان بزرگوں کو جھوٹا کہے جن کے طفیل سے ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا معجزہ دنیا پر کھلا وہ بدذات خود جھوٹا اور بے ایمان ہے۔
    اور پھر یہ ایک وسوسہ عبد الحق غزنوی نے پیش کیا ہے کہ خسوف کسوف کے بارے میں جو اقوال ہیں وہ اس بات پر دلالت کرتے ہیں کہ ان کے بعد مہدی کا ظہور ہو مگر میرزا قادیانی کے دعویٰ اور خروج کا یہ چوتھا سال ہے۔‘‘ لیکن یاد رہے کہ یہ بھی اس نابکار کی تزویر اور تلبیس ہے ۔پیشگوئی کے صاف لفظ یہ ہیں کہ انّ لمھدینا آیتین یعنی ہمارے مہدی کے مصدق موید دو نشان ہیں۔ پس یہ لام جو انتفاع کے لئے آیا ہے صاف دلالت کرتا ہے کہ خسوف کسوف سے پہلے مہدی کا ظہور ضروری ہے اور نشان کسوف خسوف اس کے خروج کے بعد ہوا ہے اور اس کی تصدیق کے لئے ظاہر کیا گیا ہے اور نشانوں کے ظاہر کرنے کے لئے سنت اللہ بھی یہی ہے کہ وہ سچے مدعی کے دعویٰ کی تصدیق کے لئے ہوتے ہیں۔ بلکہ ایسے وقت میں ہوتے ہیں جبکہ اس مدعی کی تکذیب سرگرمی سے کی جائے۔ اور جو قبل ازوقت بعض علامات ظاہر ہوتی ہیں ان کا نام نشان نہیں بلکہ ان کا نام ارہاص ہے۔ آیت جس کا ترجمہ نشان ہے اصل میں ایواء سے مشتق ہے جس کے معنے ہیں پناہ دینا۔ سو آیت کے لفظ کا عین محل وہ ہے جب ایک مامور من اللہ کی تکذیب کی جائے اس کو جھوٹا ٹھہرایا جائے۔ تب اس وقت اس بیکس کو خدا تعالیٰ اپنی پناہ میں لانے کیلئے جو کچھ خارق عادت امر ظاہر کرتا ہے اس امر کا نام آیت یعنی نشان ہے۔ اس تحقیقات سے ثابت ہے کہ نشان کے لئے ضروری ہے کہ تکذیب کے بعد ظاہر ہو گویا اس کے سچے ہونے پر ایک نشانی لگا دی گئی۔ لیکن یہ نشانی اس وقت نفع دے گی کہ جب تکذیب کے وقت ظاہر ہو اور قبل وجود مدعی جو کچھ ظاہر ہو وہ امر مشتبہ ہوتا ہے۔ اور ہریک اس کو اپنی طرف نسبت کرسکتا ہے۔ اب اس کا کون فیصلہ کرے کہ اُس کا مصداق فلاں شخص ہے دوسرا نہیں۔ لیکن اگر نشان کے وقت میں دو۲ مدعی ہوں


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 335
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 335
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/335/mode/1up
    335
    تو نشان کا مصداق وہ ہوگا جس نے کھلے طور پر زور سے اپنے دعویٰ کا اظہار کیا ہے اور جس کی تکذیب بڑی سرگرمی اور زور شور سے ہوئی ہے۔ صادق کی ایک یہ بھی نشانی ہے کہ اس کی تکذیب بڑے زور شور سے ہوتی ہے۔ دیکھو ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تکذیب میں منکرین نے ایک قیامت برپا کردی تھی۔ اور مسیلمہ کذاب کو چپکے ہی قبول کر لیا تھا۔ صادق اوائل میں ستایا جاتا اور دکھ دیا جاتا ہے مگر آخر فتح پاتا ہے۔ کاذب پہلے قبول کیا جاتا ہے۔ مگر آخر ذلیل ہوتا ہے۔ اور یہی سنت اللہ ہے کہ جب ایک شخص مدعی پیدا ہو پھر اگر وہ سچا ہے تو اس کی تائید کے لئے نشان پیدا ہوتے ہیں یہ نہیں کہ مدعی کا ابھی نام و نشان نہ ہو اور نشان پہلے ظاہر کیا جائے اور ایسے نشان پر کوئی نفع بھی مترتب نہیں ہوسکتا کیونکہ ممکن ہے کہ نشانوں کو دیکھ کر دعویٰ کرنے والے بہت نکل آویں یہ بھی خیال کرنا چاہیئے کہ اب خسوف کسوف کو تیسرا سال جاتا ہے بھلا بتاؤ کونسا دوسرا مہدی پیدا ہوگیا جو تمہارے نزدیک سچا ہے۔ ماسوا اس کے خسوف کسوف کا نشان ایک غضب اور انذار کا نشان ہے جو ان لوگوں کے لئے ظاہر ہونا چاہیئے جو تکذیب میں سرگرم ہوں اور ان کی عقلوں پر ضلالت کا گرہن لگ گیا ہو۔ پھر جبکہ ابھی مہدی کا وجود ہی نہیں تو اس کا مکذب کون ہوگا۔ جس کے ڈرانے کے لئے یہ انذاری نشان ظاہر ہوا۔ کیا عقل قبول کرسکتی ہے کہ غضب کا نشان تو ظاہر ہو جائے مگر جس کے لئے غضب کیا گیا ہے ابھی وہ موجود نہ ہو۔
    یہ بھی سمجھو کہ ہر ایک نشان میں ایک سر ہوا کرتا ہے۔ سو ہم بیان کرچکے ہیں کہ خسوف کسوف میں یہی سرّ تھا کہ تاعلماء کی ظلمانی حالت کا نقشہ جو بوجہ تکذیب ان میں پیدا ہوگئی آسمان پر ظاہر کیا جائے۔ آسمان کا خسوف کسوف علماء کے خسوف کسوف کے لئے بطور ظل اور اثر کے تھا۔ اور پہلے خبر دی گئی تھی کہ علماء اس مہدی موعود کی تکذیب اور تکفیر کریں گے۔ اور وہ لوگ تمام دنیا سے بدتر ہوں گے۔ سو ضرور تھا کہ ایسا ہی ظہور میں آتا۔ سو علماء نے اس زور شور سے تکذیب اور تکفیر کی کہ جو احادیث اور آثار میں پہلے سے لکھا گیا تھا وہ سب پورا کیا۔ اور اس طرح پر ان کی ایمانی روشنی مسلوب ہوئی اور ان کے دلوں پر انکار کی ظلمت کا خسوف کسوف لگ گیا اور پھر اس خسوف کسوف پر گواہی پیش کرنے کے لئے آسمان پر خسوف کسوف ہوا۔ پس اسی وجہ سے یہ دونوں خسوف کسوف انذار کے نشان ہیں۔ اور ہر ایک کسوف خسوف سے انذار ہی مطلوب ہوتا ہے۔ جیسا کہ حدیثوں* میں اسی طرف اشارہ کرنے کے لئے آیا ہے کہ ہر ایک کسوف یا خسوف کے وقت نماز پڑھو، استغفار میں مشغول ہو اور صدقہ دو۔
    *۔ نوٹ چنانچہ بخاری مطبوعہ مصر صفحہ ۱۲۲ سطر ۲۰ میں ہے۔ عن النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ان اللہ تعالی یخوف بھما عبادہ۔ اور اللہ تعالیٰ فرماتا ہے۔ 3۔۱؂ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 336
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 336
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/336/mode/1up
    336
    اور انذاری نشانوں کے لئے ضروری ہے کہ اول کسی قسم کی معصیت زمین کے باشندوں سے صادر ہو۔ سو اس خسوف کے پہلے جو معصیت ظہور میں آئی تھی وہ یہی تھی کہ علماء نے اس عاجز کی تکفیر اور تکذیب نہایت اصرار سے کی اور ان کے دل کسوف خسوف کے رنگ میں ہوگئے۔ پس چونکہ آسمان زمین کے واقعات کے لئے آئینہ عکس نما کا حکم رکھتا ہے اس لئے یہ کسوف خسوف عکس کے طور پر آسمان پر ہوگیا۔ ہمیشہ کسوف خسوف زمینی لوگوں کی ظلمانی حالت کا شاہد ہوتا ہے۔ مگر دونوں گرہن کا رمضان میں جمع ہونا علماء کی تکذیب اور تکفیر اور دلی تاریکی کی ایک تصویر دکھلائی گئی۔ حق یہی ہے اگرچا ہو تو قبول کرو۔
    ان مولویوں نے اس بات پر کمر باندھی ہے کہ جہاں تک ممکن ہے خدا کے نشانوں کی تکذیب کریں۔ جاہلوں کو جو خود مردے ہوتے ہیں ان لوگوں نے دھوکے دے دے کر خراب کر دیا ہے۔ جس طرح یہ لوگ اپنی حماقت سے اس پیشگوئی کو بطور تکذیب پیش کرتے ہیں جو آتھم کے متعلق ہے۔ اسی طرح وہ دوسری پیشگوئی کو بھی پیش کرتے ہیں جو احمد بیگ اور اس کے داماد کے متعلق تھی۔ مگر افسوس کہ وہ اپنی ناانصافی سے ذرہ اس بات کو نہیں سوچتے کہ اس پیشگوئی کا ایک جز نہایت صفائی سے میعاد کے اندر پورا ہوچکا ہے اور دو ٹانگوں میں سے ایک ٹانگ ٹوٹ چکی ہے۔ پس ضرور تھا کہ جن لوگوں کو ایسا غم اور ایسی مصیبت پہنچی وہ توبہ اور خوف سے اس لائق ہوجاتے کہ خدا تعالیٰ اس پیشگوئی کے دوسرے حصہ میں تاخیر ڈال دیتا۔ یسعیاہ نبی کی پیشگوئی جو قطعی طور پر بتلاتی تھی کہ اسرائیل کا بادشاہ پندرہ دن میں مر جائے گا۔ وہ پیشگوئی اس بادشاہ کے تضرع کے سبب سے پندرہ سال کے ساتھ خدا نے بدل دی۔ یہ قصہ ہماری حدیثوں میں ہی نہیں بلکہ عیسائیوں اور یہودیوں کی کتابوں میں بھی اب تک موجود ہے۔ جس سے دنیا میں کسی اہل کتاب کو انکار نہیں۔ یو نہ نبی کی کتاب* بھی اب تک بائبل کے ساتھ شامل ہے۔ جس میں یونس کی قطعی پیشگوئی کا قوم کی توبہ استغفار پر ٹل جانا صاف اور صریح لفظوں میں لکھا ہے۔ سو سمجھنا چاہئے کہ احمد بیگ کی موت ایسا دردناک ماتم تھا جس سے گھر ویران ہوگیا۔ وہ چھوٹے چھوٹے چار بچے اور ایک بیوہ چھوڑ کر مرگیا۔ اور اس کی موت کے بعد جس غم اور مصیبت میں وہ سب پڑ گئے اس کا کوئی اندازہ کرسکتا ہے۔ کیا ایسی مصیبت کی موت اور پھر سراسر پیشگوئی کے مطابق طبعاً یہ تاثیر نہیں
    باب ۳ آیت ۴ دیکھو


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 337
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 337
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/337/mode/1up
    337
    رکھتی تھی کہ ان لوگوں کو احمد بیگ کی وفات کے بعد اپنے عزیز داماد کی موت کا فکر کھانے لگتا۔ اور اس طرح ہراساں ہوکر رجوع الی الحق کرتے۔ کیا انسان میں یہ خاصیت نہیں کہ چشم دید تجربہ اس پر سخت اثر ڈالتا ہے۔ سو درحقیقت ایسا ہی ہوا۔ احمد بیگ کی موت نے اس کے وارثوں کو خاک میں ملا دیا۔ اور ایسے غم میں ڈالا کہ گویا وہ مرگئے اور سخت خوف میں پڑگئے اور دعا میں اور تضرع میں لگ گئے۔ سو ضرور تھا کہ خدا تعالیٰ اس جگہ بھی تاخیر ڈالتا۔ جیسا کہ آتھم کے متعلق کی پیشگوئی میں تاخیر ڈالی۔ ہم عربی مکتوب میں لکھ چکے ہیں کہ یہ پیشگوئی بھی مشروط بہ شرط تھی اور ہم یہ بھی بار بار بیان کرچکے ہیں کہ وعید کی پیشگوئی بغیر شرط کے بھی تخلف پذیر ہوسکتی ہے۔ جیسا کہ یونس کی پیشگوئی میں ہو ا ۔ *
    سو چاہئے تھا کہ ہمارے نادان مخالف انجام کے منتظر رہتے اور پہلے ہی سے اپنی بدگوہری ظاہر نہ کرتے۔ بھلا جس وقت یہ سب باتیں پوری ہوجائیں گی تو کیا اس دن یہ احمق مخالف جیتے ہی رہیں گے اور کیا اس دن یہ تمام لڑنے والے سچائی کی تلوار سے ٹکڑے ٹکڑے نہیں ہوجائیں گے ان بیوقوفوں کو کوئی بھاگنے کی جگہ نہیں رہے گی۔ اور نہایت صفائی سے ناک کٹ جائے گی۔ اور ذلت کے سیاہ داغ ان کے منحوس چہروں کو بندروں اور سوء روں کی طرح کردیں گے۔ سنواور یاد رکھو! کہ میری پیشگوئیوں میں کوئی ایسی بات نہیں کہ جو خدا کے نبیوں اور رسولوں کی پیشگوئیوں میں ان کا نمونہ نہ ہو۔ بیشک یہ لوگ میری تکذیب کریں۔ بیشک گالیاں دیں۔ لیکن اگر میری پیشگوئیاں نبیوں اور رسولوں کی پیشگوئیوں کے نمونہ پر ہیں تو ان کی تکذیب انہیں پر *** ہے۔ چاہیئے کہ اپنی جانوں پر رحم کریں اور روسیاہی کے ساتھ نہ مریں۔ کیا یونس کا قصہ انہیں یاد نہیں کہ کیونکر وہ عذاب ٹل گیا۔ جس میں کوئی شرط بھی نہ تھی اور اس جگہ تو شرطیں موجود ہیں۔ اور احمد بیگ کے اصل وارث جن کی تنبیہ کے لئے یہ نشان تھا اس کے مرنے کے بعد پیشگوئی سے ایسے متاثر ہوئے تھے کہ اس پیشگوئی کا نام لے لے کر روتے تھے اور پیشگوئی کی عظمت دیکھ کر اس گاؤں کے تمام مرد عورت کانپ اٹھے تھے۔ اور عورتیں چیخیں مار کر کہتی تھیں کہ ہائے وہ باتیں سچ نکلیں۔ چنانچہ وہ لوگ اس دن تک غم اور خوف میں تھے جب تک ان کے داماد سلطان محمد کی میعاد گذر گئی۔ پس اس تاخیر کا یہی سبب تھا جو خدا کی قدیم سنت کے موافق ظہور میں آیا۔ خدا کے الہام میں جو توبی توبی
    * اس پیشگوئی کی تصدیق کے لئے جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی پہلے سے ایک پیشگوئی فرمائی ہے کہ یتزوج ویولد لہ۔ یعنی وہ مسیح موعود بیوی کرے گا اور نیز وہ صاحب اولاد ہوگا۔ اب ظاہر ہے کہ تزوج اور اولاد کا ذکر کرنا عام طور پر مقصود نہیں کیونکہ عام طور پر ہر ایک شادی کرتا ہے اور اولاد بھی ہوتی ہے۔ اس میں کچھ خوبی نہیں بلکہ تزوج سے مراد وہ خاص تزوج ہے جو بطور نشان ہوگا اور اولاد سے مرا وہ خاص اولاد ہے جس کی نسبت اس عاجز کی پیشگوئی موجود ہے۔ گویا اس جگہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان سیاہ دل منکروں کو ان کے شبہات کا جواب دے رہے ہیں اور فرما رہے ہیں کہ یہ باتیں ضرور پوری ہوں گی۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 338
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 338
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/338/mode/1up
    338
    ان البلاء علی عقبک ۱۸۸۶ء میں ہوا تھا۔ اس میں صریح شرط توبہ کی موجود تھی۔ اور الہام کذّبوا بآیاتنا اس شرط کی طرف ایما کررہا تھا۔ پس جبکہ بغیر کسی شرط کے یونس کی قوم کا عذاب ٹل گیا تو شرطی پیشگوئی میں ایسے خوف کے وقت میں کیوں تاخیر ظہور میں نہ آتی۔ یہ اعتراض کیسی بے ایمانی ہے جو تعصب کی وجہ سے کیا جاتا ہے۔ میں نے نبیوں کے حوالے بیان کردیئے۔ حدیثوں اور آسمانی کتابوں کو آگے رکھ دیا۔ مگر یہ نابکار قوم ابھی تک حیا اور شرم کی طرف رخ نہیں کرتی۔
    یاد رکھو کہ اس پیشگوئی کی دوسری جز پوری نہ ہوئی تو میں ہریک بد سے بدتر ٹھہروں گا۔ اے احمقو! یہ انسان کا افترا نہیں۔ یہ کسی خبیث مفتری کا کاروبار نہیں۔ یقیناً سمجھو کہ یہ خدا کا سچا وعدہ ہے وہی خدا جس کی باتیں نہیں ٹلتیں۔ وہی ربّ ذوالجلال جس کے ارادوں کو کوئی روک نہیں سکتا۔ اُس کی سنتوں اور طریقوں کا تم میں علم نہیں رہا۔ اس لئے تمہیں یہ ابتلا پیش آیا۔
    براہین احمدیہ میں بھی اس وقت سے سترہ۱۷ برس پہلے اس پیشگوئی کی طرف اشارہ فرمایا گیا ہے۔ جو اس وقت میرے پر کھولا گیا ہے اور وہ یہ الہام ہے جو براہین کے صفحہ ۴۹۶ میں مذکور ہے۔ یااٰدم اسکن انت وزوجک الجنۃ۔ یامریم اسکن انت وزوجک الجنۃ۔ یااحمد اسکن انت وزوجک الجنۃ۔ اس جگہ تین جگہ زوج کا لفظ آیا۔ اور تین نام اس عاجز کے رکھے گئے۔ پہلا نام آدم۔ یہ وہ ابتدائی نام ہے جبکہ اللہ تعالیٰ نے اپنے ہاتھ سے اس عاجز کو روحانی وجود بخشا۔ اس وقت پہلی زوجہ کا ذکر فرمایا۔ پھر دوسری زوجہ کے وقت میں مریم نام رکھا کیونکہ اس وقت مبارک اولاد دی گئی جس کو مسیح سے مشابہت ملی۔ اور نیز اس وقت مریم کی طرح کئی ابتلا پیش آئے۔ جیسا کہ مریم کو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی پیدائش کے وقت یہودیوں کی بدظنیوں کا ابتلا پیش آیا اور تیسری زوجہ جس کی انتظار ہے۔ اس کے ساتھ احمد کا لفظ شامل کیا گیا۔ اور یہ لفظ احمد اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ اس وقت حمد اور تعریف ہوگی۔ یہ ایک چھپی ہوئی پیشگوئی ہے۔ جس کا سر اس وقت خدا تعالیٰ نے مجھ پر کھول دیا۔ غرض یہ تین مرتبہ زوج کا لفظ تین مختلف نام کے ساتھ جو بیان کیا گیا ہے وہ اسی پیشگوئی کی طرف اشارہ تھا۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 339
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 339
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/339/mode/1up
    339
    براہین میں ایسے اسرار بہت ہیں جوابُ کھلتے جاتے ہیں۔ مثلاً براہین احمدیہ کے صفحہ ۴۹۷ میں یہ پیشگوئی ہے۔ کِتَابُ الولیّ ذُوالفقار علیّ۔ اس پیشگوئی کی تشریح وہ الہام خوب کرتا ہے جو جلسہ مذاہب کے اشتہار میں درج کیا گیا ہے۔ یعنی اللّٰہ اکبر خربت خیبر خیبر کے فتح کرنے والے حضرت علی رضی اللہ عنہ تھے۔ اور ان کاہتھیار ذوالفقار تھی۔ سو یہ الہام بتلاتا ہے کہ اس عاجز کو ذوالفقار کی جگہ وہ معارف دئے گئے ہیں جو کتابوں میں لکھے جاتے ہیں۔ اور خیبر سے مراد مسلمان صورت مولویوں کی قلعہ بندی ہے جو دراصل یہودی السیرت ہیں۔ اب ان کا قلعہ خراب ہو جائے گا۔ چنانچہ جلسہ مذاہب میں ان لوگوں کی خوب بے عزتی ہوئی* چنانچہ انگریزی اخباروں نے بھی آزادی کے ساتھ اس کی شہادت دی۔
    ایسا ہی براہین احمدیہ میں احمد بیگ اور اس کے داماد کے متعلق کی پیشگوئی کی نسبت صفحہ ۵۱۰ اور صفحہ ۵۱۱ میں اور صفحہ ۵۱۵ میں پہلے سے خبر موجود ہے اور وہ یہ ہے۔ وان لم یعصمک الناس فیعصمک اللّٰہ
    * حاشیہ۔ سول ملٹری گزٹ اور آبزورنے اس بات کو تسلیم کر لیا ہے کہ یہی مضمون تمام مضامین پر غالب رہا۔ اور ان اخباروں نے اس کی اعجازی قوت کو اس حد تک مان لیا ہے کہ گویا اس تقریر نے تمام حاضرین پر ایک مسمریزم کا عمل کردیا۔ اور تمام طبیعتیں اس کی طرف کھینچی گئی ہیں۔ اور آبزرور میں یہ بھی لکھا ہے کہ مسلمانوں کو لازم ہے کہ اس مضمون کا انگریزی میں ترجمہ کرکے یورپ اور امریکہ میں پھیلائیں تاانہیں حقیقی اسلام کی خبر ہو۔ اور بیدار مغز لوگوں نے اس مضمون کو صرف عالی درجہ کا مضمون نہیں سمجھا بلکہ اس کے اعجاز کے قائل ہوگئے چنانچہ آج چودہ جنوری ۱۸۹۷ء کو سیالکوٹ محلہ اٹاری سے ایک کارڈ مرسلہ اللہ دتا صاحب میرے پاس پہنچا جس میں وہ لکھتے ہیں کہ چونکہ وہ مضمون جو آپ کی طرف سے لاہور میں پڑھا گیا تھا وہ ایک معجزہ کے رنگ میں تھا اس لئے میں اس خوشی کے شکریہ میں سو ما؍روپیہ نقد آپ کی خدمت میں بھیجتا ہوں اور مبارک باد دیتا ہوں کہ اس سے اسلام کی فتح ہوئی۔ خدا تعالیٰ میاں اللہ دتا صاحب کو اس خوشی کے عوض میں بہت سی ذاتی خوشیاں بھی دکھلاوے جو اسلام کی فتح سے خوش ہے خدا اس سے خوش ہے۔ اب کیا اس اعجاز صریح کو جس سے سچے مسلمانوں نے یہ خوشیاں ظاہر کیں کوئی چھپا سکتا ہے۔ پس عبد الحق کو سوچنا چاہیئے کہ مباہلہ کے یہ اثر ہوتے ہیں۔ نہ یہ کہ متوفی بھائی کی ایک بیوہ اور بوڑھی عورت پر قبضہ کرکے اس کو مباہلہ کی فتح یابی کی دلیل ٹھہراوے۔ اور بزرگ بھائی کی موت یاد نہ آئے۔ *** ہے ایسی خوشی پر۔ شیخ محمد حسین بطالوی بھی سوچیں! کہ کیا کبھی ان کا مضمون بھی اعجاز تصور ہوکر ہزاروں آدمیوں نے اس پر گواہی دی ہے کیا کبھی اعجازی مبارک بادی میں دو۲ پیسہ بھی ان کو انعام ملے ہیں۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 340
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 340
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/340/mode/1up
    340
    من عندہ یعصمک اللّہ من عندہ وان لم یعصمک الناس۔ واذ یمکربک الذی کفر۔ اوقد لی یا ھامان۔ لعلی اطلع علٰی الٰہ موسٰی وانی لاظنہ من الکاذبین۔ تبت یدا ابی لھب وتب ماکان لہ ان یدخل فیھا الّا خائفا۔ وما اصابک فمن اللّہ۔ الفتنۃ ھٰھنا فاصبر کما صبر اولوالعزم۔ الا انھا فتنۃ من اللّٰہ لیُحبَّ حُبًّا جمًّا۔ حُبًّا من اللّٰہ العزیز الاکرم۔ عطاءً ا غیر مجذوذ۔ شاتان تذبحان۔ وکل مَنْ علیھا فان۔ ولا تھنوا ولا تحزنوا۔ الم تعلم انّ اللّٰہ علٰی کل شیءٍ قدیر۔ انّا فتحنالک فتحًا مُبینًا لیغفرلک اللّہ ما تقدم من ذنبک وما تأخر۔ اَلَیْس اللّہ بکاف عَبْدہ۔ فبرّأہ اللّہ ممّا قالوا وکان عند اللّہ وجیھا۔
    ترجمہ۔ یعنی خدا تجھے بچائے گا اگرچہ لوگ نہ بچائیں۔ میں پھر کہتا ہوں کہ خدا تجھے بچائے گا اگرچہ لوگ نہ بچائیں۔ وہ زمانہ یاد کر کہ جب ایک شخص تجھ سے مکر کرے گا۔ اور اپنے رفیق ہامان کو کہے گا کہ فتنہ انگیزی کی آگ بھڑکا۔ اس جگہ فرعون سے مراد شیخ حسین بطالوی ہے اور ہامان سے مراد نو مسلم سعد اللہ ہے اور پھر فرمایا کہ وہ کہے گا کہ میں اس کے خدا کی حقیقت معلوم کرنا چاہتا ہوں اور میں اس کو جھوٹا سمجھتا ہوں یعنی باخدا ہونے کا دعویٰ سراسر کذب ہے کوئی تعلق خدا تعالیٰ سے نہیں۔ اور پھر فرمایا کہ یہ فرعون ہلاک ہوگیا اور دونوں ہاتھ اس کے ہلاک ہوگئے یعنی یہ شخص ذلیل کیا جائے گا * اور ہاتھ جو کسب معاش کا ذریعہ ہیں نکمے ہوجائیں گے۔

    * حاشیہ۔ محمد حسین بطالوی کی ذلت کا یہ بھی موجب ہے کہ اس نے ایک شیطانی پیشگوئی کی تھی کہ میں اس شخص کو یعنی اس عاجز کو ذلیل کردوں گا۔ اور لوگوں کو رجوع سے بند کردوں گا۔ مگر اس کے برعکس ظہور میں آیا۔ اس کی پیشگوئی کے وقت شاید سو کے قریب بھی ہماری جماعت نہیں تھی۔ اب خدا تعالیٰ کے فضل سے آٹھ ہزار کے قریب ہیں۔ ابھی قریب عرصہ میں الہ آباد میں ایک بھاری جماعت پیدا ہوگئی ہے۔ جن کو ہمارے دلی دوست میرزا خدا بخش صاحب کے قیام الہ آباد سے بہت مدد ملی ہے۔ میرزا صاحب موصوف نے اس قدر اس سلسلہ کو اس طرف پھیلایا ہے کہ گویا تمام مخالفین کی ناک کاٹ کر آئے ہیں۔ اس خوشی کے وقت میں ان کی وہ سوما؍ روپیہ کی مدد بھی قابل قدر ہے جو انہوں نے333 33ایک دفعہ اور3 روپیہ اب قادیان میں آکر اس سلسلہ کی تائید کے لئے دیئے ہیں۔ جزاہم اللّٰہ
    خیر الجزاء۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 341
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 341
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/341/mode/1up
    341
    یعنی اس پر فقر فاقہ کی مصیبت نازل ہوگی۔ اور اپنے مقاصد میں ناکام رہے گا اور رسوا ہو جائے گا۔ اور پھر فرمایا کہ اس شخص کے دعویٰ اسلام اور مولویت کے لائق نہیں تھا کہ تکفیر اور تکذیب پر جرأت کرتا اور اس نازک مقدمہ میں چالاکی کے ساتھ دخل دیتا۔ ہاں یہ چاہیئے تھا کہ صحت نیت اور خوف دل کے ساتھ اپنے شکوک رفع کراتا۔ اور پھر فرمایا کہ اس شخص کے منصوبوں سے جو کچھ تجھے ضرر پہنچے گاوہ خدا تعالیٰ کی طرف سے ہے اورجب یہ تکفیر اور تکذیب کرے گا تو اس وقت ملک میں ایک بڑا فتنہ برپا ہوگا۔ وہ فتنہ انسان کی طرف سے نہیں بلکہ تیرے خدا نے یہی چاہا تاوہ تجھ سے نہایت درجہ کی محبت کرے کیونکہ ہر ایک اصطفاء ابتلا کے بعد ہوتا ہے۔ خدا کی محبت بڑے قدر کے لائق ہے کیونکہ وہ سب پر غالب اور سب سے زیادہ کریم ہے۔ پس جس سے وہ محبت کرے گا اس کی تمام امیدیں کامیابی کا انجام رکھتی ہیں اور اس کی یہ عطا غیر منقطع ہے۔ ا س کے بعد یوں ہوگا کہ دو بکریاں ذبح کی جائیں گی پہلی بکری سے مراد میرزا احمد بیگ ہوشیارپوری ہے اور دوسری بکری سے مراد اس کا داماد ہے اور پھر فرمایا کہ تم سست مت ہو اور غم مت کرو کیونکہ ایسا ہی ظہور میں آئے گا۔ کیا تو نہیں جانتا کہ خدا ہریک چیز پر قادر ہے اور پھر فرمایا کہ ہم نے تجھے کھلی کھلی فتح دی ہے یعنی کھلی کھلی فتح دیں گے تاکہ تیرا خدا تیرے اگلے پچھلے گناہ بخش دے یعنی کامل عزت اور قبولیت عطا کرے کیونکہ خدا تعالیٰ کا تمام گناہ بخش دینا اس محاورہ پر استعمال پاتا ہے کہ وہ اعلیٰ درجہ پر راضی ہوجائے اور پھر فرمایا کہ خدا اپنے بندہ کے لئے کافی ہے۔ وہ اس کو ان تمام الزاموں سے بری کرے گا جو اس پر لگائے جاتے ہیں۔ اور وہ بندہ خدا کے نزدیک وجیہ ہے۔
    ان پیشگوئیوں میں علاوہ اور پیشگوئیوں کے جو ان کے ضمن میں بیان کی گئیں دو بکریوں کے ذبح ہونے کی پیشگوئی احمد بیگ اور اس کے داماد کی طرف اشارہ ہے جو آج سے سترہ۱۷ برس پہلے براہین احمدیہ میں شائع ہوچکی ہے ایسا ہی محمد حسین کی تکفیر کا فتنہ جو صرف پانچ چار سال سے شائع ہوا ہے آج سے سترہ۱۷ برس پہلے اس فتنہ کی براہین میں خبر دی گئی ہے چنانچہ میں ابھی بیان کر چکا ہوں۔ اب سوچنا چاہیئے کہ کیا یہ انسان کا کام ہے۔ کیا انسان کو یہ قدرت حاصل ہے کہ آئندہ واقعات کی خبر سالہا سال پہلے ایسی صفائی سے بیان کرسکے۔ بڑے عظیم الشان فتنے میری نسبت دو وقوع میں آئے ہیں۔ ایک پادریوں کا۔ ایک محمد حسین وغیرہ کی تکفیر کا۔ سو ان دونوں فتنوں کی تصریح کے ساتھ براہین احمدیہ میں سترہ۱۷ برس پہلے آج کے دن سے خبریں موجود ہیں کیا دنیا میں کوئی اور شخص موجود ہے جس کی تحریروں میں یہ عظیم الشان سلسلہ پیشگوئیوں کا پایا جائے یقیناً کوئی سخت بے حیا ہوگا جو اس فوق العادت سلسلہ سے انکار کرے۔ اس جگہ الہام الٰہی بارش کی طرح برس رہا ہے آسمانوں کے دروازے کھلے ہیں۔ اب دیکھو کہ یہ شریر مولوی کب تک اور کہاں تک انکار کریں گے۔ میں خدا سے یقینی علم پاکر کہتا ہوں کہ اگر یہ تمام مولوی اور اُن کے سجادہ نشین اور ان کے ملہم



    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 342
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 342
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/342/mode/1up
    342
    اکٹھے ہوکر الہامی امور میں مجھ سے مقابلہ کرنا چاہیں تو خدا ان سب کے مقابل پر میری فتح کرے گا کیونکہ میں خدا کی طرف سے ہوں پس ضرور ہے کہ بموجب آیہ کریمہ 3 ۱؂ میری فتح ہو۔ فَمُت یاعَبْد الشیطان الموسُوم بعبد الحق۔ فان اللّٰہ معزنی ومذلک ومکرمنی ومھینک وان اللّہ لا یحبّ الظالمین۔
    کمال افسوس ہے جو میں نے سنا ہے کہ اسلام کے بدنام کرنے والے غزنوی گروہ جو امرتسر میں رہتے ہیں۔ لوگوں کو کہتے ہیں کہ ایک بدبخت محمد سعید دہلوی جو مرتد ہوگیا ہے اور اسکا بھائی کبیر جواب دسمبر ۱۸۹۶ء میں بمقام کوٹلہ مالیر فوت ہوگیا ہے یہ دونوں واقعہ عبدالحق کے مباہلہ کا اثر ہیں۔ اب مسلمانو! سوچو کہ یہ سیاہ دل فرقہ غزنویوں کا کس قدر شیطانی افتراؤں سے کام لے رہا ہے۔ اے بدبخت مفتریو! خبیث محمد سعید یا اسکے بھائی سے میری کوئی قرابت نہیں۔ ان لوگوں کے ساتھ نہ ہمارا کوئی رشتہ ہے نہ ان سے کچھ غرض تعلق ہے کیا عبدالحق کے مباہلہ کا اثر ایک تیسرے گھر پر گرا جس کا ہم سے کچھ بھی تعلق نہیں اس سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ لوگ عبدالحق کے مباہلہ کے بعد بہت ذلیل ہوگئے ہیں جس کی وجہ سے ان کو ایسے ایسے جھوٹے منصوبے تراشنے پڑے اگر عبدالحق کی رو سیاہی کے دھونے کیلئے ایسے ہی جھوٹے منصوبے بنانے تھے تو دہلی کے غیر معروف دو لونڈوں کا ذکر بے فائدہ تھا۔ ہماری دانست میں بہتر یہ تھا کہ آج کل جو بمبئی میں ہزارہا لوگ طاعون سے مر رہے ہیں اُس کو عبدالحق کے مباہلہ کا اثر ٹہرا کر اس مضمون کا اشتہار شائع کردیتے کہ ’’چونکہ منشی زین الدین محمد ابراہیم )جو نہایت درجہ مخلص ایں جانب اور سلسلہ بیعت میں داخل ہیں( بمبئی میں رہتے ہیں لہٰذا مناسب تھاکہ مباہلہ کا اثر اسی شہر پر نہ کسی اور جگہ پڑتا۔‘‘ نہ معلوم کہ یہ جاہل اور وحشی فرقہ اب تک کیوں شرم اور حیا سے کام نہیں لیتا۔ عبدالحق کے مباہلہ کے بعد جس قدر خداتعالیٰ نے ہمیں ترقی دی۔ ہماری قبولیت زمین پر پھیلا دی۔ ہماری جماعت کو ہزارہا تک پہنچایا۔ ہماری علمیت کا لاکھوں کو قائل کردیا۔ الہام کے موافق مباہلہ کے بعد ہمیں ایک لڑکا عطا کیا جس کے پیدا ہونے سے تین لڑکے ہمارے ہوگئے یعنی دوسری بیوی سے۔ اور نہ صرف یہی بلکہ ایک چوتھے لڑکے کیلئے متواتر الہام کیا اور ہم عبدالحق کو یقین دلاتے ہیں کہ وہ نہیں مرے گا جب تک اس الہام کا پورا ہونا بھی نہ سن لے۔ اب اس کو چاہیئے کہ اگر وہ کچھ چیز ہے تو دعا سے اس پیشگوئی کو ٹال دے۔ اور پھر خدا نے پیشگوئی کے موافق آتھم کو فی النار کرکے پادریوں اور مخالف مولویوں کا منہ کالا کیا۔ ہزارہا روپیہ تک مالی فتوحات مجھ پر کیں ۔اور جلسہ مذاہب میں جو ۲۷ ؍دسمبر ۱۸۹۶ء کو ہوا تھا ہماری تقریر کی وہ قبولیت ظاہر کی کہ انگریزی اخبار بول اٹھے کہ ہاں یہی تقریر غالب رہی اس کو معجزہ سمجھ کر بعض جوانمرد مسلمانوں نے روپیہ بھیجا جیسا کہ میاں اللہ دتا صاحب سیالکوٹی نے کل ۱۵ جنوری ۱۸۹۷ء کو اسی خوشی سے 3سو روپیہ بھیج دیا۔ اور اس روز ہماری وہ الہامی پیشگوئی بھی پوری ہوئی جو اس مضمون کی نسبت بذریعہ اشتہار شائع کی گئی تھی کہ یہ مضمون سب پر غالب آئے گا۔
    کیا اس عزت اور ان تمام الہاموں کے پورا ہونے سے اب تک عبدالحق کا منہ کالا نہیں ہوا۔ کیا اب تک غزنویوں کی


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 343
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 343
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/343/mode/1up
    343
    جماعت پر *** نہیں پڑی۔ بیشک خدا نے ان لوگوں کو ذلت کی رو سیاہی کے اندر غرق کردیا۔ مباہلہ کا کھلا کھلا اثر اِس کو کہتے ہیں۔ اور خدا کی تائید اِس کا نام ہے اور تکلف سے جھوٹ بولنا گوہ کھانا ہے۔
    ہم اس مضمون کے خاتمہ میں یہ بیان کرنا بھی ضروری سمجھتے ہیں کہ جن ناپاک طبع لوگوں نے تکفیر پر کمر باندھی ہے ان کے مقابل پر ایسے لوگ بھی بہت ہیں جن کو عالم رؤیا میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت ہوئی اور انہوں نے جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اس عاجز کی نسبت دریافت کیا اور آپ نے فرمایا کہ وہ شخص درحقیقت منجانب اللہ ہے اور اپنے دعویٰ میں صادق ہے چنانچہ ایسے لوگوں کی بہت سی شہادتیں ہمارے پاس موجود ہیں۔ جس شخص کو اس تحقیق کا شوق ہے وہ ہم سے اس کا ثبوت لے سکتا ہے۔
    اور غزنوی افغانوں کی جماعت جو ناپاک خیالات اور تکذیب کی بلا میں گرفتار ہیں۔ ان کیلئے اگر وہ انصاف اور خدا ترسی سے کچھ حصہ رکھتے ہیں ان کے والد بزرگوار مولوی عبد اللہ صاحب کی شہادت کافی ہے۔ ہمارے پاس وہ گواہ موجود ہیں جو حلف سے بیان کرسکتے ہیں کہ مولوی عبد اللہ صاحب نے اپنے کشف کی رو سے بتلایا تھا کہ ایک نور آسمان سے نازل ہوا اور قادیان کی سمت میں اترا ہے اور ان کی اولاد اس نور سے محروم رہ گئی۔ اس گواہی میں حافظ محمد یوسف صاحب ضلعدار بھی شریک ہیں۔ جو مولوی عبداللہ کے دوست اور محسن بھی ہیں بلکہ ان کے بھائی محمد یعقوب نے ایک جلسہ میں قسم کھا کر کہا تھا کہ مولوی عبد اللہ نے اس نور کے ذکرکے وقت اس عاجز کا نام بھی لیا تھا کہ یہ نور ان کے حصہ میں آگیا اور میری اولاد بے نصیب اور بے بہرہ رہی لہٰذا مناسب ہے کہ عبد الحق غزنوی اور عبد الجبار جو اپنی شرارت اور خباثت سے تکفیر اور گالیوں پر زور دے رہے ہیں۔ اپنے فوت شدہ بزرگ کے کلمات کی تحقیق ضرور کرلیں۔ ایسا نہ ہو کہ ان کی وصیت کی نافرمانی کرکے ان کے عاق بھی ٹھہر جائیں۔ اس بزرگ مولوی عبد اللہ نے اپنی زندگی کے زمانہ میں میرے نام بھی دو خط بھیجے تھے اور ان خطوں میں قرآنی آیتوں کے الہام کے ساتھ مجھے خوشخبری دی تھی کہ تم کفار پر غالب رہو گے اور پھر وفات کے بعد میرے پر ظاہر کیا تھا کہ میں آپ کے دعویٰ کا مصدق ہوں۔ چنانچہ میں اللہ جلّ شانہٗ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ انہوں نے میرے دعویٰ کو سن کر تصدیق کی اور صاف لفظوں میں مجھے کہا کہ ’’جب میں دنیا میں تھا۔ تو میں امید رکھتا تھا کہ ایسا شخص خدا تعالیٰ کی طرف سے ظاہر ہوگا۔‘‘ یہ ان کے الفاظ ہیں۔ ولعنۃ اللّٰہ علی الکاذبین۔
    اور اس وقت کے سجادہ نشینوں میں سے دو بزرگ اور ہیں جنہوں نے اس عاجز کے مقام اور مرتبہ سے انکار نہیں کیا اور قبول کیا ہے۔ ایک تو میاں غلام فرید صاحب چاچڑاں والے پیر نواب صاحب بہاولپور ہیں۔


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 344
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 344
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/344/mode/1up
    344
    جن کا خط عربی َ میں نے چھاپ دیا ہے جس سے یہ بھی ثابت ہوتا ہے کہ وہ علم عربی میں ایک فاضل ہیں۔
    اور دوسرے پیر صاحبُ العَلَم ہیں جو بلاد سندھ کے مشاہیر مشائخ میں سے ہیں۔ جن کے مرید ایک لاکھ سے کچھ زیادہ ہوں گے۔ اور باوجود اس کے وہ علوم عربیہ میں مہارت تامہ رکھتے ہیں۔ اور علماء راسخین میں سے ہیں۔ چنانچہ انہوں نے جو میری نسبت گواہی دی ہے وہ یہ ہے۔ ’’انّی رأیت رسول اللّہ صلی اللہ علیہ وسلم واستفسرتہ فی امرک وقلت بیّن لی یارسول اللہ اھو کاذب مُفتری او صادق۔ فقال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ’’انہ صادق ومن عند اللہ۔‘‘ فعرفت انک علی حق مُبین۔ وبعد ذٰلک لانشک فی اَمْرک ولا نرتاب فی شانک و نعمل کما تأمر۔ فان امرتنا ان اذھبوا الی بلاد امریکہ فانا نذھب الیھا وَمَا تکون لنا خِیرۃ فی امرنا وستجدنا ان شاء اللّہ من المطاوعین۔‘‘ یعنی میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو عالم کشف میں دیکھا پس میں نے عرض کی کہ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یہ شخص جو مسیح موعود ہونے کا دعویٰ کرتا ہے کیا یہ جھوٹا اور مفتری ہے یا صادق ہے۔ پس رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ وہ صادق ہے اور خدا تعالیٰ کی طرف سے ہے۔ پس میں نے سمجھ لیا کہ آپ حق پر ہیں۔ اب بعد اس کے ہم آپ کے امور میں شک نہیں کریں گے اور آپ کی شان میں ہمیں کچھ شبہ نہیں ہوگا اور جو کچھ آپ فرمائیں گے ہم وہی کریں گے۔ پس اگر آپ یہ کہو کہ ہم امریکہ میں چلے جائیں تو ہم وہیں جائیں گے۔ اور ہم نے اپنے تئیں آپ کے حوالہ کردیا ہے اور انشاء اللہ ہمیں فرمانبردار پاؤ گے۔
    یہ وہ باتیں ہیں جو ان کے خلیفہ عبد اللطیف مرحوم اور شیخ عبد اللہ عرب نے زبانی بھی مجھے سنائیں اور اب بھی میرے دلی دوست سیٹھ صالح محمد حاجی اللہ رکھا صاحب جب مدراس سے ان کے پاس گئے تو انہیں بدستور مصدق پایا۔ بلکہ انہوں نے عام مجلس میں کھڑے ہوکر اور ہاتھ میں عصا لے کر تمام حاضرین کو بلند آواز سے سنا دیا کہ میں ان کو اپنے دعویٰ میں حق پر جانتا ہوں اور ایسا ہی مجھے کشف کی رو سے معلوم ہوا ہے اور ان کے صاحبزادہ صاحب نے کہا کہ جب میرے والد صاحب تصدیق کرتے ہیں تو مجھے بھی انکار نہیں۔
    اب عبد الحق غزنوی کو کچھ کھا کر مرجانا چاہیئے کہ خدا تعالیٰ اس عاجز کی لاکھوں انسانوں میں عزت ظاہر کررہا ہے جس میں اس کی ذلت ہے۔ اس پلید کو سوچنا چاہیئے کہ مباہلہ کا یہ اثر ہوتا ہے یا یہ کہ بھائی مرا اور اس کی بوڑھی عورت پر قبضہ کیا اور پھر اس کو مباہلہ کا اثر ٹھہرایا۔
    اور یاد رہے کہ صرف یہی نہیں کہ میاں غلام فرید صاحب چاچڑاں واے اور پیر صاحبُ العَلَم سندھ والے مصدق ہیں۔ بلکہ صاحبزادہ پیر سراج الحق صاحب جن کے بزرگوں کے ہندوستان میں ہزارہا مرید ہیں اس عاجز کی


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 345
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 345
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/345/mode/1up
    345
    بیعت میں معہ اپنے اہل بیت کے داخل ہوچکے ہیں۔ ایسا ہی حاجی منشی احمد جان صاحب لدھیانوی مرحوم اس عاجز کے اول درجہ کے معتقدین میں سے تھے اور اُن کے تمام صاحبزادے اور صاحبزادیاں اور گھر کے لوگ غرض تمام کنبہ ان کا اس عاجز کی بیعت میں داخل ہوچکا ہے۔
    بالآخر میں پھر ہریک طالب حق کو یاد دلاتا ہوں کہ وہ دین حق کے نشان اور اسلام کی سچائی کے آسمانی گواہ جس سے ہمارے نابینا علماء بے خبر ہیں وہ مجھ کو عطا کئے گئے ہیں ۔مجھے بھیجا گیا ہے تا میں ثابت کروں کہ ایک اسلام ہی ہے جو زندہ مذہب ہے۔ اور وہ کرامات مجھے عطا کئے گئے ہیں جن کے مقابلہ سے تمام غیر مذہب والے اور ہمارے اندرونی اندھے مخالف بھی عاجز ہیں۔ میں ہریک مخالف کو دکھلا سکتا ہوں کہ
    قرآن شریف
    اپنی تعلیموں اور اپنے علوم حکمیہ اور اپنے معارف دقیقہ اور بلاغت کاملہ کی رو سے معجزہ ہے۔ موسیٰ کے معجزہ سے بڑھ کر اور عیسیٰ کے معجزات سے صدہا درجہ زیادہ۔
    میں بار بار کہتا ہوں۔ اور بلند آواز سے کہتا ہوں کہ قرآن اور رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے سچی محبت رکھنا اور سچی تابعداری اختیار کرنا انسان کو صاحب کرامات* بنا دیتا ہے۔ اور اسی کامل انسان پر علوم غیبیہ کے دروازے کھولے جاتے ہیں۔ اور دنیا میں کسی مذہب والا روحانی برکات میں اس کا مقابلہ نہیں کرسکتا۔ چنانچہ میں اس میں صاحب تجربہ ہوں۔ میں دیکھ رہا ہوں
    * جو شخص یہ کہتا ہے کہ اس زمانہ میں اسلام میں کوئی اہل کرامت موجود نہیں وہ اندھا اور دل سیاہ ہے۔ اسلام وہ مذہب ہے کہ کسی زمانہ میں اہل کرامت سے خالی نہیں رہا۔ اور اب تو اتمام حجت کے لئے کرامات کی نہایت ضرورت ہے اور وہ ضرورت خدا تعالیٰ کے فضل سے حسب المراد پوری ہوگئی ہے کوئی شخص نہیں کہ کرامت نمائی میں اسلام کے مقابل پر ٹھہر سکے۔ منہ


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 346
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 346
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/346/mode/1up
    346
    کہ بجز اسلام تمام مذہب مُردے ان کے خدا مُردے اور خود وہ تمام پیرو مُردے ہیں۔ اور خدا تعالیٰ کے ساتھ زندہ تعلق ہوجانا بجز اسلام قبول کرنے کے ہرگز ممکن نہیں ہرگز ممکن نہیں۔
    اے نادانوں! تمہیں مردہ پرستی میں کیا مزہ ہے؟ اورمُردار کھانے میں کیا لذّت؟!!! آؤ میں تمہیں بتلاؤں کہ زندہ خدا کہاں ہے۔ اور کس قوم کے ساتھ ہے۔ وہ اسلام کے ساتھ ہے۔ اسلام اِس وقت موسیٰ کا طور ہے جہاں خدا بول رہاہے۔ وہ خدا جو نبیوں کے ساتھ کلام کرتا تھا اور پھر چپ ہوگیا۔ آج وہ
    ایک مسلمان
    کے دل میں کلام کررہا ہے۔ کیا تم میں سے کسی کو شوق نہیں؟ کہ اس بات کو پرکھے۔ پھر اگر حق کو پاوے تو قبول کر لیوے۔ تمہارے ہاتھ میں کیا ہے؟ کیا ایک مُردہکفن میں لپیٹا ہوا۔ پھر کیا ہے؟ کیا ایک مشت خاک۔ کیا یہ مردہ خدا ہوسکتا ہے؟ کیا یہ تمہیں کچھ جواب دے سکتا ہے؟ ذرہ آؤ! ہاں! *** ہے تم پر اگر نہ آؤ۔ اور اس سڑے گلے مردہ کا میرے زندہ خدا کے ساتھ مقابلہ نہ کرو۔
    دیکھو میں تمہیں کہتا ہوں کہ چالیس دن نہیں گذریں گے کہ وہ بعض آسمانی نشانوں سے تمہیں شرمندہ کرے گا۔ ناپاک ہیں وہ دل جو سچے ارادہ سے نہیں آزماتے۔ اور پھر انکار کرتے ہیں۔ اور پلید ہیں وہ طبیعتیں


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 347
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 347
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/347/mode/1up
    347
    جو شرارت کی طرف جاتی ہیں نہ طلب حق کی طرف۔
    او میرے مخالف مولویو! اگر تم میں شک ہو تو آؤ چند روز میری صحبت میں رہو۔ اگر خدا کے نشان نہ دیکھو تو مجھے پکڑو۔ اور جس طرح چاہو تکذیب سے پیش آؤ۔ میں اتمام حجت کر چکا۔ اب جب تک تم اس حجت کو نہ توڑ لو۔ تمہارے پاس کوئی جواب نہیں۔ خدا کے نشان بارش کی طرح برس رہے ہیں۔ کیا تم میں سے کوئی نہیں جو سچا دل لے کر میرے پاس آوے۔ کیا ایک بھی نہیں۔
    ’’دنیا میں ایک نذیر آیا۔ پر دنیا نے اس کو قبول نہ کیا۔ لیکن خدا اسے قبول کرے گا اور بڑے زور آور حملوں سے اس کی سچائی ظاہر کردے گا۔‘‘
    وَالسّلام علٰی مَن اتّبع الہدٰی
    ۲۲ ؍جنوری ۱۸۹۷ء
    ***
    **
    *


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 348
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انجام آتھم: صفحہ 348
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/348/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 349
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 349
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/349/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 350
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 350
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/350/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 351
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 351
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/351/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 352
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 352
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/352/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 353
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 353
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/353/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 354
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 354
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/354/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 355
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 355
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/355/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 356
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 356
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/356/mode/1up


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 357
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 357
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/357/mode/1up


    مضامین
    آ۔ا
    آزمائش
    بندہ کی آزمائش کبھی مشکلات سے بھی ہوتی ہے ۹۵
    خدا آزمائش کی انتہاپر رحم کرتا ہے ۱۲۰ح
    ہر ایک اصطفاء ابتلا کے بعد ہوتا ہے ۳۴۱
    آسمان
    آسمان زمین کے اعمال پر گواہی دیتا ہے ۲۹۵
    آسمان زمین کے واقعات کیلئے آئینہ عکس نما کا حکم رکھتا ہے ۳۳۶
    آیت
    آیت اور ارہاص میں فرق ۳۳۴
    آیت یعنی نشان ظاہر کرنے کا مقصد ۳۳۵ح
    ابناء اللہ
    اہل اللہ کو پہلی کتب میں بطور استعارہ ابناء اللہ کہا گیا ہے
    نیز انبیاء پر اس لفظ کا استعمال ۵۷ح
    اجماع
    حیات مسیح پر اجماع نہیں ہوا ۱۳۲
    قرآن مجید کے خلاف کوئی اجماع قابل قبول نہیں ۱۳۳
    عقیدہ اجماعیہ کا منکر ملعون ہے ۱۴۴
    اخبار نویس
    اخبار والوں کو تنبیہ اور نصائح ۲۸۴
    آتھم کے مؤید اخبار نویس پیشگوئی کی حقیقت کھلنے پر
    چپ ہو گئے ۲۸۹
    ارہا ص
    قبل از وقت ظاہر ہونے والی علامات کانام ارہاص ہے ۳۳۴
    استجابت دعا (دیکھئے زیر عنوان دعا)
    استخارہ
    مخالفین کو مباہلہ سے قبل مسنون استخارہ کرنے کی تجویز ۱۶۴
    استعارہ
    اللہ کی خبروں میں استعارات پنہاں ہوتے ہیں ۸۷
    الہامات میں بعض الفاظ کا استعارہ اور مجاز کے طور پر
    استعمال ہو نا ۲۸ح
    پیشگوئیوں میں استعارات ۳۱ح،۱۸۳
    اہل اللہ کو بطور استعارہ ابناء اللہ کہا جانا ۵۷ح
    اسلام ۱۹،۲۴،۲۶،۳۳،۳۷،۳۸،۴۱،۴۵،۴۸،۷۹،
    ۱۱۶،۱۲۰،۱۲۳،۱۴۳،۱۷۳،۲۸۵،۲۸۸،۳۱۴ح،
    ۳۱۵،۳۱۶ح،۳۱۷،۳۱۸ ،۳۲۴ ،۳۳۹
    اسلام ہی زندہ مذہب ہے ۳۴۵
    خدا سے زندہ تعلق بجز اسلام کے ہرگز ممکن نہیں ۳۴۶
    اسلام نے ان پر تلوار اٹھانے کا حکم فرمایا ہے جو مسلمانوں
    پر تلوار اٹھائیں ۳۷
    قتال کے متعلق اسلام اور توریت کے حکم میں فرق ۳۷
    چودھویں صدی کے سر پراسلام پر ہزاروں حملے ہوئے ۳۲۱
    اسلام کسی زمانہ میں بھی اہل کرامت سے خالی نہیں رہا ۳۴۵
    اسلام موسیٰ کا طور ہے جہاں خدا بول رہا ہے ۳۴۶
    عقل اسلامی توحید تک ہی گواہی دیتی ہے ۴
    اسلامی جزا و سزا کا طریق احسن اور معقول ہے ۱۲۴ح
    بٹالوی کا قائل ہونا کہ یہ تمام تاثیریں خدا کی طرف سے
    تھیں اور مضمون اسلام کی فتح کا موجب ہوا ۳۱۶ح
    شریعت پر ذرہ برابر اضافہ یا کمی کرنے والے پر
    اللہ ، فرشتوں اور لوگوں کی *** ۱۴۴
    آنحضرت ؐ کے وقت میں شق قمر ہونے میںیہ حکمت تھی
    کہ علماء کی دیانت ٹکڑے ٹکڑے ہو گئی ۲۹۵
    عقیدہ اجماعیہ کا منکر ملعون ہے ۱۴۴


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 358
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 358
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/358/mode/1up


    اجماعی عقیدہ سے منہ پھیرنا بدذاتی اوربے ایمانی ہے ۳۲ح
    اشتہار؍اشتہارات
    اشتہار۳۰ دسمبر ۱۸۹۵ء ۱،۳،۱۷،۱۸،۲۴،۲۷
    اشتہار چہارم انعامی چار ہزار روپیہ ۲،۳۰ح،۳۱ح
    اشتہار ہزار روپیہ ، دو ہزار روپیہ ،تین ہزار روپیہ
    چار ہزار روپیہ ۱۸
    اشتہارمباہلہ ۴۵
    اشتہار قابل توجہ گورنمنٹ ہند ۲۸۳
    سبز اشتہار ۲۹۹
    سفید اشتہار ۲۹۹
    سچائی کے طالبوں کے لئے عظیم الشان خوشخبری ۲۹۹ح
    اشتہار’’صیانۃ الاناس عن شر الوسواس الخناس‘‘ ۳۳۴
    اعتراضات اور ان کے جوابات
    محمد حسین بٹالوی کے ایک اعتراض کا جواب ۲۰ح
    بٹالوی کا اعتراض کہ الہام کا فقرہ خلاف محاورہ ہے ۶۰ح
    آتھم سے متعلق لوگوں کے بعض اعتراضات کا جواب ۱۸۶
    اس اعتراض کا جواب کہ داماد احمد بیگ معیاد مقررہ میں
    نہیں مرا ۲۱۰تا۲۲۵
    علماء کا اعتراض کہ مسیح موعود عربی اور فارسی کا علم نہیں رکھتے ۲۳۱
    اعتراض کہمحدثین نے دار قطنی کی حدیث کے راویوں
    پر جرح کی ہے اس لئے یہ حدیث صحیح نہیں ۳۳۳
    آتھم کاحضورؑ پرحملوں کا الزام اور اس کا جواب ۱۴،۱۵
    ایک اخبار کی طرف سے حضور ؑ پر لگایا گیا جھوٹا الزام
    اور اس کا جواب ۲۸۳،۲۸۴
    آتھم کی پیشگوئی کی وجہ سے پیروؤں کے منحرف ہونے
    کا الزام اور اس کا جواب ۱۱تا۱۳
    افترا
    افتراء سے مراد ۶۳ح
    خدا پر افتراء سخت گناہ ہے ۴۹
    آتھم کے چار افتراجن کی اسے اسی دنیا میں سزا دی گئی ۴۳
    اقنوم
    عیسائی عقیدہ کہ خدا تین اقنوم ہیں باپ ،بیٹا اور
    روح القدس ۳۳،۳۴
    عیسائیوں کا شائع کردہ تین اقنوم کا نقشہ ۳۵
    اللہ تعالیٰ جل جلالہ
    اللہ تعالیٰ کاغضب انکار ، جسارت اور زیادتی کی وجہ سے
    نازل ہوتا ہے ۲۱۵
    زندہ خدا اسلام کے ساتھ ہے ۳۴۶
    انسان کے دل میں فطرتی نقش ہے کہ اس کا
    خالق و مالک اکیلا خدا ہے ۳۴
    خدا کا علم ماضی حال او رمستقبل پر محیط ہے ۴۷
    اللہ کبھی اپنے وعدہ کے خلاف نہیں کرتا ۷۹
    اللہ اسے غیب پر اطلاع دیتا ہے جسے اپنے ہاتھ سے
    پاک کرتا ہے ۸۵
    اللہ کے اقوال و افعال میں مطابقت پائی جاتی ہے ۸۷
    اللہ تعالیٰ کے اسرار میں کئی دقائق پوشدہ ہیں ۸۷
    خدا نے مخلوق کو تفاوت مراتب کے اعتبار سے پیدا کیا ہے ۸۸
    مخلوق کے قول کو اللہ کے قول پر ترجیح نہ دیں ۱۳۱
    اللہ کی ذات علت العلل اور ہر حرکت وسکون کا مبداء ہے ۱۱۹
    وہ جہانوں کا پیدا کنندہ اور رحیم وجواد و کریم ہے ۱۲۰
    اللہ زمین و آسمان کی پناہ ہے ۲۶۷
    اللہ کے احسانات کا ذکر ۷۳
    اللہ کا قرب کسی کی مقبوضہ میراث نہیں ۱۱۲
    کسی کو سزا دینا خدا کے ذاتی ارادہ میں داخل نہیں ۸
    صفاتِ باری تعالیٰ
    سورۃ فاتحہ کی چار ام الصفات کی لطیف تشریح ۸تا۹ح
    سزا دینا خدا کی ام الصفات میں داخل نہیں ۱۰ح
    خدا کی رحمت غضب پر اور نرمی سختی پر غالب ہے ۱۲۰


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 359
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 359
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/359/mode/1up

    الہام
    مسیح موعود ؑ کا دعویٰ وحی و الہام اور اس پر گزرنے والا عرصہ ۵۰
    الہام کے فقرہ یرد ھا الیکپر اعتراض اور اس کا جواب ۶۰ح
    الہام میں لفظ عقب کے معنی اور مراد ۲۱۴
    الہام میں لفظ بلاء سے مراد دو مصیبتیں ۲۱۴
    الہام میں پانی اور فشل سے مراد ۵۶ح
    الہام فسیکفیکھم اللّٰہ میں اشارہ اوراس سے مراد ۲۱۶تا۲۱۹
    ٹوٹا پھوٹا فقرہ الہام کے رنگ میں مومن کو القا ہو سکتا ہے بلکہ
    کبھی فاسق بھی تنبیہ یا ترغیب کے طور پر پا سکتا ہے ۳۰۲ح
    صوفیاء کرام کی کتابوں میں مسلّم اور ایک معمولی محاورہ
    مکالمات الٰہیہ کا ہے ۲۸ح
    صالح علماء جو حضرت مسیح موعود ؑ پر ایمان لائے ، ان
    کے اوصاف کریمہ اور ان کے حق میں الہام ۱۴۰،۱۴۱
    اللہ غیب سے اسی کو آگاہ کرتا ہے جسے اس نے خود
    پاک فرمایا ہو ۸۵
    بذریعہ مکالمہ الٰہیہ کامل بندہ کو عطا ہونے والی تین نعمتیں
    (۱) دعائیں قبول ہونا (۲)امور غیبیہ پر اطلاع
    (۳) قرآن کے علوم کھولے جانا ۳۰۳ح
    مکالمات الٰہیہ بغیر خاص اور برگزیدہ بندوں کے کسی
    کو عطا نہیں کیا جاتا ۳۰۲ح
    مکالمہ میں بندہ خدا سے آمنے سامنے باتیں کرتا ہے
    وہ سوال کرتا ہے خدا جواب دیتا ہے ۳۰۳ح
    ام الالسنہ
    اللہ تعالیٰ نے عربی زبان کو ام الالسنہ بنایا ہے اور یہ
    خاتم السن العالمین ہے ۲۵۸ح
    عربی الہامی زبان ہے جس سے نبی یا چنیدہ ولی ہی کامل
    کیا جاتا ہے ۱۸۴
    حضورؑ کو عربی زبان کے چالیس ہزار مادہ کا علم دیاجانا ۲۳۴
    اللہ نے عربی کو ام الالسنہ بنایا ہے اور تمام زبانیں اس سے
    مستخرج ہیں ۲۵۱ح تا ۲۵۸ح
    یہ دینی علوم کے اسرار کھولنے کے لئے بمنزلہ چابی کے ہے ۲۶۵
    عربی حب رسول اور حب قرآن کے لئے معیار ہے ۲۶۶
    انگریزی ‘ جرمن ‘ یونانی ‘ عبرانی ‘ ہندی‘ لاطینی ‘ چینی اور فارسی
    زبانوں کا ذکر، ان کے مادے عربی سے بدلے ہوئے ہیں ۲۵۸ح
    امّ القرٰی
    اللہ تعالیٰ نے مکہ مکرمہ کو امّ القریٰ بنایا ہے ۲۵۸ح
    امّ الکتب
    خدا نے قرآن کریم کو ام الکتب بنایا اور اس میں اولین
    اور آخرینکی کتب کا خلاصہ ہے ۲۵۹ح
    انسان
    توحید وہ چیز ہے جس کے نقوش انسان کی فطرت
    میں مرکوز ہیں ۵
    خدا نے انسان کی پیدائش سے قبل اس کے لئے بے بہا
    نعمتیں پیدا فرمائیں ۱۰۷
    انسان تمام جہات سے مختار و آزاد نہیں بلکہ اللہ تعالیٰ کی
    قضاء و قدر کے تحت ہے ۱۱۹
    چشم دید تجربہ انسان پر سخت اثر ڈالتا ہے ۳۳۷
    بذریعہ مکالمہ الٰہیہ کامل بندہ کو ملنے والی تین نعمتیں ۳۰۳ح
    کامل انسان پر علوم غیبیہ کے دروازے کھولے
    جاتے ہیں ۳۴۵
    انسان حریف کی تکذیب کے لئے اصل واقعات کو چھپاتا ہے ۲۰
    بچوں کے سعید اور خبیث پیدا ہونے کی وجہ ۵۶ح،۵۸ح
    جہنم میں ہر بدبخت ایک لمبے عرصہ کے بعد خوش بخت
    ہو جائے گا ۱۱۸ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 360
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 360
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/360/mode/1up

    تمام امور کے حقائق ہر شخص پر نہیں کھلتے بہت سے مخفی
    رکھے جاتے ہیں جو دوسروں پر کھلتے ہیں ۸۴
    جب قوت استقامت باقی نہیں رہتی تو انسان گناہ کی
    طرف جھک جاتا ہے ۵۶
    انگریزی گورنمنٹ
    گورنمنٹ کاہر مذہب و قوم سے مساویانہ سلوک ۳۸،۲۸۳
    گورنمنٹ کو مذہبی مباحثات کی آزادی شرائط کی
    پابندی سے محدود کرنے کی تجویز ۳۹
    گورنمنٹ کی خیر خواہی کی غرض ۶۸
    گورنمنٹ برطانیہ کی تعریف ، شکر گزاری اور
    خاندانی خدمات کا ذکر ۲۸۳
    گورنمنٹ کے طول عمر اور بقا کی دعا ۲۸۴
    اہل حدیث
    اہل حدیث باوجوداہل حدیث کہلانے کے حدیثوں
    کے مغز سے ناواقف ہیں ۳۱ح
    اہل سنت
    اہل سنت کا عقیدہ ہے کہ وعید میں خدا کے ارادہ عذاب
    کا تخلف جائز ہے مگر بشارت میں نہیں ۷ح،۳۱ح
    ب
    بادشاہ
    اسلام میں کافر بادشاہ کے عدل سے فائدہ اٹھا کر
    اس پر باغیانہ حملہ کا حکم نہیں ۳۷
    روم کے بادشاہ نے عیسائی فرقہ موحدین کا مذہب اختیار
    کیا اور چھ بادشاہ موحد رہے ۳۹ح
    یسعیاہ کی پیشگوئی بادشاہ کے تضرع کے سبب پندرہ دن
    سے پندرہ سال کے ساتھ خدا نے بدل دی ۳۳۶
    بروز
    بروز کا عقیدہ بدعت نہیں اس کی نظیر یں گزر چکی ہے ۱۵۹
    حضرت عیسیٰؑ کا دوبارہ آنا بطور بروز مراد ہے ۴۸،۸۰
    بروز کے طور پر نزول صحف سابقہ میں مسلم ہے ۱۲۸
    بروز کا طریق خدائے رحمن کی سنن سے ثابت ہے ۱۵۹
    بغاوت
    بغاوت کا خیال دل میں لانا نہایت درجہ کی بدذاتی ہے ۶۸
    پ
    پادری
    نادان پادریوں کی تمام یا وہ گوئی آتھم کی گردن پر ہے ۲
    پادریانہ مشرب رکھنے والے جھوٹ کے پتلے ہیں ۱۷
    آتھم پادریوں کا منہ کالا کر کے قبر میں داخل ہو چکا ہے ۲۹۲ح
    آتھم کے معاملہ میں شک کرنے والے پادری کودعوت مباہلہ ۳۲
    تمام پادری صاحبوں کے لئے احسن طریق فیصلہ ۳۴
    پادری ہمارے سید مولیٰ ؐ کی بے ادبیاں کر رہے ہیں ۳۰۷
    پادری اسلام کی توہین اور تحقیر کرتے ہیں ۳۶
    پادریوں کے سوا اور کوئی دجال اکبر نہیں ۴۷
    پادریوں کو بدزبانی اور گالیوں کا طریق چھوڑ نے کی تجویز ۲۹۳
    ایمان ہے تو ایک پادری بات سے الٹی جوتی کو سیدھا کر
    کے تو دکھلائے ۲۹۱
    آتھم کی پیشگوئی کی تکذیب میں پادریوں نے جھوٹ
    سے کام لیا ۳۲۹
    پیشگوئی ؍پیشگوئیاں
    پیشگوئیوں میں استعارات اور لطیف اشاروں کاپایا جانا
    اور ایک رویا کی مثال ۴۶،۸۷،۹۲،۹۳
    پیشگوئیوں کے وقتوں میں استعارات۔ جیسے دن سے
    مراد سال ہوتا ہے ۳۱ح،۱۸۳
    پیشگوئیوں میں ایسی فوق العادت شرطیں ہوتی ہیں
    کہ کوئی جھوٹا فائدہ نہیں اٹھا سکتا ۳۲۴


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 361
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 361
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/361/mode/1up

    وعید کی پیشگوئی بغیر شرط کے تخلف پذیر ہو سکتی ہے ۳۲،۳۳۷
    خدا کی کھلی کھلی پیشگوئیوں سے منہ پھیرنا بدطینتوں کا کام ہے ۴۳
    پیشگوئی میں مسیح کیلئے لفظ رجوع استعمال نہیں ہو ا
    بلکہ نزول آیا ہے ۱۱۱
    آنحضرت ؐ کی پیشگوئیاں
    آخری زمانہ میں پوری ہونے والی پیشگوئیاں ۱۴۲
    حضورؐ کی پیشگوئی کہ عیسائیوں اور اہل اسلام میں
    آخری زمانہ میں ایک جھگڑا ہو گا پوری ہو گئی ۲۸۸
    مہدی کے پاس کتاب میں ۳۱۳ صحابہ کا نام درج ہو گا
    والی پیشگوئی آج پوری ہو گئی ۳۲۴
    پیشگوئی میں لفظ کدعہ قادیان کے نام کو بتا رہا ہے ۳۲۹
    آنحضرت ؐ کی مسیح موعودؑ کے شادی کرنے اور
    صاحب اولاد ہونے کی پیشگوئی ۳۳۷
    پیشگوئی کسوف و خسوف کا پورا ہونا ۴۹،۱۴۲،۱۷۷،۲۹۳
    مسیح موعود کا کسرصلیب اورقتل خنزیر پر مامور ہونا ۴۶،۴۷
    مسیح موعود ؑ کی پیشگوئیاں
    مسیح موعودؑ کی پیشگوئیاں خدا کے نبیوں کی پیشگوئیوں
    کے نمونہ پر ہیں ۳۳۷
    آتھم کی موت پر دلالت کرنے والی پیشگوئیاں ۱،۲
    لیکھرام پشاوری کی موت کی پیشگوئی ۲۸ح
    آپ کی عیسائیوں کے ایک فتنہ کے متعلق پیشگوئی ۲۸۶
    آپ کے لبوں پر فصاحت و بلاغت جاری ہونے والی پیشگوئی ۲۹۰
    علم قرآن کے دئیے جانے کی پیشگوئی ۲۹۱
    جلسہ مذاہب میں مضمون غالب رہنے کی پیشگوئی ۲۹۹،۳۱۶ح
    بیٹوں کی قبل از پیدائش خبر دیا جانا ۲۹۹
    عبد اللہآتھم کی موت کی پیشگوئی
    (تفصیل دیکھئے اسماء میں عبد اللہ آتھم)
    احمد بیگ اور اس کے داماد کی موت کی پیشگوئی
    (تفصیل دیکھئے اسماء میں احمد بیگ)
    رجوع خلائق ہونے اور دنیا میں شہرت پانے کی پیشگوئی ۲۸۶
    پنڈت دیانند کی موت ،دلیپ سنگھ کے ارادہ سیر ہندوستان میں
    ناکامی اور مہر علی ہوشیارپوری کی مصیبت کے بارے میں
    پیشگوئیاں ۲۹۷
    خدا کے چھ طور کے نشان آپ کے ساتھ ہونا اور ان
    کی تفصیل ۳۰۴تا۳۱۱
    متفرق پیشگوئیاں
    آخری زمانہ کی پوری ہونے والی قرآنی پیشگوئیاں ۱۴۲
    عمانوایل نام رکھنا یہود کے نزدیک یہ پیشگوئی یسوع
    سے قبل ایک لڑکے کے حق میں پوری ہو چکی ہے ۶
    یونسؑ کی نینواہ کی تباہی کی پیشگوئی ۳۰ح
    یسعیاہ کی پیشگوئی بادشاہ کے تضرع کے سبب خدا نے
    بدل دی ۳۳۶
    حضور ؑ کے متعلق بٹالوی کی شیطانی پیشگوئی ۳۴۰ح
    ت
    تاویل
    عیسیٰؑ نے ایلیا کے نزول کی پیشگوئی کی تاویل کی ۱۲۸
    نصوص اور دلائل سے ثابت امر کے مخالف بات کی
    تاویل کرنی چاہیے ۱۳۱
    تثلیث
    عیسائیوں کا عقیدۂ تثلیث ۳۴
    تین مجسم خدا ؤں کی جسمانی تثلیث کا نقشہ ۳۵
    اگر انسان کے کانشنس میں تثلیث کی ضرور ت ہوتی تو
    لوگوں سے اس کا مواخذہ ہوتا ۵
    تثلیث کی تعلیم سراسر جھوٹی اور شیطانی طریق ہے ۳۳
    جن کو خدا نے تین بنایا تھا ہرگز ایک نہیں ہو سکتے ۳۶
    تثلیث کا مسئلہ تیسری صدی کے بعد ایجاد ہوا ہے ۳۹ح
    تثلیث کا موجد اور اس کا پہلا منکر ۳۹ح
    یسوع کو پیش آمدہ واقعات کی روسے ردّ تثلیث ۴۱


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 362
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 362
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/362/mode/1up

    اگر تثلیث کی تعلیم بنی اسرائیل کو دی جاتی تو وہ اسے نہ بھولتے ۵
    الوہیم کے لفظ سے تثلیث کے حق میں دلیل کا رد اور
    توریت میں اس لفظ کا استعمال ۶
    یہود میں تثلیث کا قائل کوئی فرقہ نہیں جبکہ عیسائیوں
    میں قدیم سے موحد فرقہ موجود ہے ۴۲
    تصوف
    صوفیاء کرام کی کتابوں میں مسلّم اور ایک معمولی محاورہ
    مکالمات الہیہ کا ہے ۲۸ح
    جو باخدا اور صوفی کہلاتا اورعاجز کی طرف رجوع کرنے
    سے کراہت رکھتا ہے مکذبین میں داخل ہے ۶۹
    تفسیر
    تفسیر بالرائے سے بچو ۱۳۰
    کَانَتَا رَتْقًا کی تفسیر ۸۶
    آیت خالدین فیھا کی تفسیر ۱۲۱ح
    آیت مباہلہ فقل تعالوا کی تفسیر ۳۲۰
    سبع سمٰوٰت و سبع ارضین کی وضاحت ۲۶۳ح
    فَلَمَّا تَوَفَّیْتَنِیْکی تفسیر ۱۳۴،۱۳۵،۱۵۴،۱۵۶،۳۲۱
    لفظ توفّی کے مختلف معنی ۱۳۰،۱۳۱،۱۳۴،۱۵۴،۱۵۵
    لفظ توفّیکے موت کے سوا معنوں کی تائیدمیں صحابہ کا
    کوئی اثر یا کوئی حدیث نہیں ۱۳۳
    توفّی میں جب فاعل اللہ، مفعول مردوں یا عورتوں میں
    سے کوئی ہو تو قبض روح یا مارنے کیلئے ہی آتا ہے ۱۵۳
    لفظ تو فّی کو کسی کلام اور شعراء کے شعر میں سوائے بقا
    کے ساتھ موت کے نہیں پایا ۱۵۶
    سورۂ فاتحہ کی چار ام الصفات کی لطیف تشریح ۸تا۹ح
    فاتحہ میں معارف الہیٰہ میں سے ایک قابل قدر نکتہ کا ذکر ۱۰ح
    تقویٰ
    تقویٰ اختیار کرنے کی نصیحت ۱۱۲،۱۱۳،۲۸۴
    تقویٰ شعار لوگوں کا طریق ۲۰۵
    تقویٰ یہی ہے کہ انسان غلطی کے بعد جو درست ہواس
    کا اقرار کرے ۲۰۵
    مسیح موعودؑ کی بیعت کرنے والوں میں صلاحیت اور
    تقویٰ ترقی پذیر ہے ۳۱۵ح
    دل کا ایک ذرہ تقویٰ بھی انسان کو خدا کے غضب سے
    بچا سکتا ہے ۳۲۰
    انسان تقویٰ کی راہ کو اختیار کر کے مامور من اللہ کی
    لڑائی سے پرہیز کرے ۳۲۱
    تکبر
    تکبر اور لاپرواہی سے بچو ۱۶۶
    اللہ تعالیٰ متکبروں سے محبت نہیں کرتا ۷۷
    تناسخ
    یہ عقیدہ الٰہی نظام رحمانیت کے خلاف ہے ۱۰۶ح
    یہ خدائے قادرو خالق کو ضعیف و بیکار بنا ڈالتا ہے ۱۰۷ح
    قائلین تناسخ کو خدا کی طرح روح اور مادہ کو قدیم ماننا پڑتا
    ہے اس صورت میں وہ رب العالمین نہیں ہو سکتا ۱۰۸ح
    یہ امر خدا کی طرف سے ہوتا تو لوگوں کی قلت و کثرت
    حیوانات کی تعداد کے تغیر کے برابر ہوتی ۱۱۲ح
    ارواح کا آسمان سے نازل ہوناباطل اور بے دلیل ہے ۱۱۳ح
    اگر اجرام فلکی میں لوگ آباد ہیں تو ارواح کو زمین پر
    بھیجنے کے کوئی معنے نہیں ۱۱۴ح
    تناسخ ماننے سے نکاح سے بھی اجتناب کرنا چاہئے ۱۲۲ح
    کوئی ثبو ت نہیں کہ دنیا میں آنے والی روح دوبارہ آئی ہے ۱۵۵
    براہمن تفاوت مراتب مخلوقات کے تناظر میں تناسخ پر
    ایمان رکھتے ہیں ۱۰۵ح
    توحید
    عقل اسلامی توحید تک ہی گواہی دیتی ہے ۴
    توحید وہ چیز ہے جس کے نقوش انسان کی فطرت
    میں مرکوز ہیں ۵


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 363
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 363
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/363/mode/1up

    بجز توحید کے نجات نہیں ۳۴
    توحید کے بارہ میں مسیح موعودؑ کا عربی شعر ۲۶۷
    عیسائی موحد فرقہ اورقیصرروم کا اس فرقہ کے مذہب کو
    اختیار کرنا ۳۹ح،۳۲۲
    توفّی(دیکھئے زیر عنوان تفسیر اور وفات مسیح)
    ج
    جزا سزا
    اسلامی جزا و سزا کا طریق احسن اور معقول ہے ۱۲۴ح
    جزا سزا کا طریق ہندوؤں نے تناسخ اور عیسائیوں نے
    کفارہ بیان کیا ہے جو غیر معقول ہے اور ان کاردّ ۱۰۶ح تا۱۲۳ح
    جلسہ اعظم مذاہب عالم
    جلسہ مذاہب سے متعلقہ اشتہار ۲۹۹ح
    جلسہ مذاہب مباہلہ کے بعد عزت کا موجب ہوا ۳۱۵ح
    حضورؑ کے مضمون کے غالب رہنے کی پیشگوئی اور اس کا
    پورا ہونا ۳۰۰ح،۳۳۹،۳۴۲
    حضورؑ کے مضمون کا سامعین پر فوق العادت اثر ۳۱۶ح
    مخالفین کا اقرارکہ مضمون اول رہا ۳۰۰
    اخبارا ت کا تسلیم کرناکہ حضورؑ کا مضمون تمام مضامین پر
    غالب رہا ۳۳۹
    جلسہ مذاہب میں مولویوں کی خوب بے عزتی ہوئی ۳۳۹
    جماعت احمدیہ
    یہ خدا کے ہاتھ کا لگایا ہوا پودا ہے خدا اسے ہرگز ضائع
    نہیں کرے گا ۶۴
    ہندوستان کے مختلف شہروں کی مخلص جماعتوں کا تذکرہ ۳۱۵ح
    فوق العادت طور پرجماعت کی ترقی ہو رہی ہے ۳۱۰ح
    ہزارہا سعید لوگوں کا جماعت میں داخل ہو نا ۳۱۹
    حضرت مسیح موعودؑ کوئی بدعت لے کر نہیں آئے ۱۱۵،۱۴۴،۱۶۰
    مسیح موعودؑ کا فتن اور بدعات کے ظہور کے وقت بھیجا جانا ۱۶۳
    حضرت مسیح موعودؑ کی بیعت کرنے والوں میں صلاحیت
    اورتقویٰ کا ترقی پذیر ہونا ۳۱۵ح
    بعض صحابہ کی مالی قربانیوں کا ذکر ۳۱۲ح
    مہدی کے پاس مطبوعہ کتاب میں اس کے ۳۱۳ صحابہ
    کے نام ہونے والی حدیث ۳۲۵
    اکثر سجدہ میں روتے اور تہجد میں تضر ع کرتے ہیں وہ
    اسلام کا جگر اور دل ہیں ۳۱۵ح
    تمام اصحاب خصلت صدق و صفا رکھتے ہیں ۳۲۵
    حضورؑ کے ۳۱۳صحابہ کی فہرست اسماء ۳۲۵تا۳۲۸
    پہلے آئینہ کمالات اسلام میں۳۱۳ صحابہ کے نام درج ہیں ۳۲۵
    صالح علماء جو حضرت مسیح موعود ؑ پر ایمان لائے ، ان
    کے اوصاف کریمہ اور ان کے حق میں الہام ۱۴۰،۱۴۱
    مہدی اور مسیح کا زمانہ چودھویں صدی ہے ۳۲۲
    خدا نے حضورؑ کو صدی چہاردہم کا مجدد قرار دیا ہے ۴۵
    مسیح موعود کا صدی کے سر پر آنا ۱۲۲
    چودھویں صدی کے سر پر ایسے مجدد کی ضرورت تھی
    جو اسلام کی سچائیثابت کرے ۳۲۱
    ہمارے عقیدہ اور مذہب کا مؤید قرآن ، حدیث ، ائمہ
    عقل اور الہام متواتر ہے ۱۱۵
    ہمارا دین اسلام کتاب قرآن اور نبی خاتم النبیینؐ ہیں ۱۴۴
    احمدیوں کے خلاف مولویوں کے فتووں کا ذکر ۸۰،۸۱
    جہاد
    آنحضرت ؐ کے قتال پر عیسائیوں کے اعتراض کاجواب
    اور موسیٰ،یشوع اور داؤدؑ کے قتال کا ذکر ۳۶
    قتال کے متعلق اسلام اور توریت کے حکم میں فرق ۳۷
    بغیر اتمام حجت جنگ کرنا بری بات ہے آنحضرت ؐنے
    مصائب پر تیرہ سال صبر کیا ۱۳۸،۱۳۹
    جہنم
    جہنم ناقص لوگوں کو کامل اور غافلوں کو ہوشیار کرنے
    کی جگہ ہے ۱۱۷ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 364
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 364
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/364/mode/1up

    اللہ تعالیٰ نے اس کا نام ’’ امّ الداخلین‘‘ رکھا ہے یہ داخل
    ہونے والوں کی ایسے تربیت کرے گی جیسے ماں بیٹوں کی ۱۱۸ح
    جہنم میں ہر بدبخت ایک لمبے عرصہ کے بعد خوش بخت
    ہو جائے گا ۱۱۸ح
    آیت خالد ین فیھا میں اہل نار کے لئے امید اور
    بشارت ۱۲۱ح
    چ،ح
    چولہ باوا نانک
    باوانانک کی بھاری یادگار چولہ جس پر کلمہ اور
    قرآن شریف کی آیتیں لکھی ہیں ۳۱۴ح
    مسیح موعودؑ کی کتاب ست بچن میں چولے کا تفصیلی ذکر ۳۵
    حدیث ؍احادیث
    یونس کی قوم کو عذاب کے وعدہ کی احادیث صحیحہ سے
    تصدیق موجود ہے ۳۰
    اہل حدیث حدیثوں کے مغز سے ناواقف ہیں ۳۱ح
    حدیث میں بتائی گئی مسیح موعود کی حقیقی علامت ۴۷
    ہر وہ قول جو صحیح حدیث اور خبر کا مخالف ہو مردود و باطل ہے ۱۳۸
    احادیث مسیح کے رفع آسمانی پر خاموش ہیں ۱۶۸
    دار قطنی کی حدیث میں کوئی اغلاق نہیں اور خسوف و کسوف
    کا ظہور سراسر الفاظِ حدیث کے مطابق ہے ۲۹۴
    پیشگوئی پوری ہونا حدیث کی صحت پر شہادت ہے ۳۳۳
    محدثین کا فتویٰ قطعی طور پر کسی حدیث کے صدق یا
    کذب کا مدار نہیں ٹھہر سکتا ۲۹۴
    مہدی کو اسی طرح حدیث میں آل محمد ؐ ٹھہرایاجس
    طرح عیسائیوں کو آل عیسیٰ ۲۹۶
    احادیث صحیحہ میں پہلے فرمایا گیا کہ مہدی کو کافر ٹھہرایا
    جائے گا ۳۲۲
    حدیث میں لفظ کدعہ سے مراد قادیان ہے ۳۲۹
    آثار اور احادیث جو آحاد ہیں وہ مفید ظن ہیں ۳۳۳
    محدثین کا حدیث کسوف و خسوف کے دوراویوں عمر و اور
    جابر جعفی پر جرح کرنا اور جھوٹا ٹھہرانا اور اس کا جواب ۳۳۴
    کسی کا کاذب ہونااس کی روایت کورد نہیں کر سکتا ۳۳۳
    رؤیت روایت کے ضعف کو دورکرتی ہے ۳۳۴
    حروف ابجد
    مسیح موعودؑ کے نام غلام احمد قادیانی کے عدد (۱۳۰۰) میں
    زمانہ کا عدد مخفی ہونا ۱۷۲
    ھویٰ دجال ببٌّ فی عذاب الھاویۃ المھلکۃ
    سے موت آتھم کی تاریخ بحروف ابجد ۱۸۹۶ء ہے ۲۰۴
    خ
    خاتم النبیین(دیکھئے زیر عنوان نبوت)
    خط
    فتح مسیح کا مسیح موعود ؑ کو بدزبانی سے بھراخط لکھنا ۲۸۷ح
    مولوی عبداللہ غزنوی نے مسیح موعودؑ کودو خط لکھے جن میں
    آپ کو کفار پر غالب رہنے کی خوشخبری دی ۳۴۳
    خنزیر
    سب جانداروں سے زیادہ پلید اور کراہت کے
    لائق خنزیر ہے ۳۰۵ح
    خواب
    کبھی سچی خواب ادنیٰ مومن یا کافر اور فاجرکوبھی آ جاتی ہے ۳۰۲ح
    خواب میں فوت شدہ بیٹے کے واپس آنے سے مراد ۲۹۳
    خواب میں رمضان میں خسوف وکسوف دیکھنے کی تعبیر ۲۹۶
    حضورؑ کا کشف اور اس کی تعبیر ۳۰۰ح
    عالم رویا میں آنحضرت ؐ کی زیارت ۳۴۳
    پیر صاحب العلم کا کشف میں آنحضرتؐ کو دیکھنا ۳۴۴
    د۔ر
    دجال
    لغت کی رو سے دجال ایک گروہ کا نام ہے جو دجل
    سے زمین کو پلید کرتا ہے ۴۷


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 365
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 365
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/365/mode/1up

    صلیب پر مدار نجات رکھنے والے پادریوں کا گروہ
    دجالِ اکبر ہے ۴۶
    دجال معہود کا بجز حرمین کے تمام زمین پر تسلط ہوجانا ۴۸
    درود و سلام
    حضرت محمدؐ، آپ کی آل و اصحاب اور اللہ کے صالح
    بندوں پر درود و سلام ۷۳
    دعا
    آنحضرت ؐ کا بارش برسانے کامعجزہ استجابت دعا ۲۸۵
    یسوع کا رات بھر دعا کرنے کے باوجود استجابت دعا
    سے محروم رہنا ۴۲
    مسیح موعودؑ اور استجابت دعا(دیکھئے اسماء میں مرزا غلام احمد قادیانی)
    حکومت برطانیہ کے طول عمر اور بقاء کی دعا ۲۸۴
    دعائے مباہلہ ۳۱۷ح،۳۱۸ح
    دنیا
    یہ عالم ابد الآباد تک قائم نہیں رہے گا بلکہ اس کیلئے
    ایک انتہاء مقرر ہے ۱۲۴ح
    یہ دنیا لمحہ بھر کی ہے جس کی تلخی اور شیرینی جاتی رہے گی ۱۲۶ح
    اس عالم کے بعد ایک اور عالم ہے جسے یوم الدین
    کا نام دیا گیا ہے ۱۲۴ح
    دوزخ (دیکھئے زیر عنوان جہنم)
    رفع مسیحؑ (دیکھئے اسماء میں عیسیٰ ؑ )
    رمضان المبارک
    رمضان نزول قرآن اور برکات کا مہینہ ہے ۲۹۶
    خواب میں رمضان میں کسوف و خسوف ہونے کی تعبیر ۲۹۶
    روح
    ارواح آسمان سے نازل نہیں ہوتیں ۱۱۳ح
    ارواح باقی رہنے والی ہیں اور معاد برحق ہے ۱۵۴
    روح القدس
    روح القدس کا کبوتر کی شکل پر متشکل ہونا ۳۵
    س۔ش۔ص۔ط
    سجادہ نشین
    سجادہ نشینوں کا حضورؑ کوکافر و کاذب ٹھہرا نا ۴۵
    ان سجادہ نشینوں کے نام جنہیں دعوت مباہلہ دی گئی ۷۱،۷۲
    سکھ مذہب
    باوا نانک صالح مسلمان تھے، دو مرتبہ حج کیا ، مسلمان
    لڑکی سے شادی کی ،آپ کی بھاری یادگار چولہ جس
    پر کلمہ اورقرآن شریف کی آیتیں لکھی ہیں ۳۱۴ح
    مسیح موعودؑ کی کتاب ست بچن میں چولے کا تفصیلی ذکر ۳۵
    شرک
    انسان کو خدا ٹھہرانا نہایت گندہ شرک ہے ۳۴
    حواریوں کے زمانہ میں عیسائیت میں شرک کی تخم ریزی ہو ئی ۳۲۱
    عیسیٰ پرستی بت پرستی اور رام پرستی سے کم نہیں ۴۱
    شریعت
    شریعت پر ذرہ برابر اضافہ یا کمیکرنے والے پر
    اللہ ، فرشتوں اور لوگوں کی *** ۱۴۴
    شق قمر
    آنحضرت ؐ کے وقت میں شق قمر ہونے میںیہ حکمت تھی
    کہ علماء کی دیانت ٹکڑے ٹکڑے ہو گئی ۲۹۵
    شکر
    شکر کرنے سے نعماء بڑھتی ہیں ۱۸۵
    قرآن و حدیث میں محسنوں کا شکر بجالانے کی تعلیم ۲۸۴
    شیطان
    شیطان کے مس سے مسیح اور اس کی ماں پاک تھے ۵۷ح
    یسوع کا شیطان کے پیچھے جانا اور اسے تین مرتبہ
    شیطانی الہام کا ہونا ۲۹۰ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 366
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 366
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/366/mode/1up

    صادق
    خداصادق کی حمایت کرتا ہے ۴۲
    صادق کی یہ نشانی ہے کہ اس کی تکذیب زور وشور
    سے ہوتی ہے مگر آخر فتح پاتا ہے ۳۳۵
    صدی
    مہدی اور مسیح کا زمانہ چودھویں صدی ہے ۳۲۲
    خدا نے حضورؑ کو صدی چہاردہم کا مجدد قرار دیا ہے ۴۵
    مسیح موعود کا صدی کے سر پر آنا ۱۲۲
    چودھویں صدی کے سر پر ایسے مجدد کی ضرورت تھی
    جو اسلام کی سچائی ثابت کرے ۳۲۱
    تیسری صدی عیسوی میں عیسائی مشرک اور موحد
    فرقہ کے درمیان مباحثہ ہوا ۳۲۲
    عیسائیوں میں تثلیث کا مسئلہ تیسری صدی کے بعد
    ایجاد ہوا ہے ۳۹ح،۴۲
    صلیب
    کفارہ اور تثلیث کے تمام اغراض صلیب کے ساتھ
    وابستہ ہیں ۴۶
    خدا نے یہود کی صلیب سے مسیح کو نجات دی اور اب
    چاہا کہ اسے نصاریٰ کی صلیب سے بچائے ۱۷۱،۱۳۲
    مسیح موعود ؑ کا صلیب کے غلبہ کے وقت آنا اور اسے توڑنا ۱۱۶
    مسیح موعود کا بڑانشان کسر صلیب ہے ۴۶
    طاعون
    خدا طاعون سے اپنا عذاب نازل کرتا ہے ۳۷
    طاعون سے لوگوں کا مرنا ۳۴۲
    طبیب
    خدا وبا کے انسداد کیلئے طبیبوں کو بوٹیوں اور تدبیروں
    کا علم دیتا ہے ۳۷
    ع۔غ
    عذاب
    اللہ تعالیٰ کاغضب انکار ، جسارت اور زیادتی کی وجہ سے
    نازل ہوتا ہے ۲۱۵
    خدا طاعون اور ہیضہ سے عذاب نازل کرتا ہے ۳۷
    ہر عذاب کیلئے ایک انتہاء مقدر ہے ۱۱۸
    اللہ کی طرف عذاب کو دائمی بنانے کی نسبت دینا
    درست نہ ہو گا ۱۱۹
    عذاب تضرع اور رجوع سے مؤخر ہو جاتا ہے ۷،۲۱۵
    اہل سنت کا عقیدہ ہے کہ وعید میں خدا کے ارادہ عذاب
    کا تخلف جائز ہے مگر بشارت میں نہیں ۷ح،۳۱ح
    جھوٹی خوشی اخیر پر *** سے بھرا عذاب ہو جاتا ہے ۳۰۷
    بغیر کسی شرط کے قوم یونس ؑ کاعذاب ٹل گیا ۳۳۸
    عربی زبان
    عربی الہامی زبان ہے جس سے نبی یا چنیدہ ولی ہی کامل
    کیا جاتا ہے ۱۸۴
    حضورؑ کو عربی زبان کے چالیس ہزار مادہ کا علم دیاجانا ۲۳۴
    اللہ نے عربی کو ام الالسنہ بنایا ہے اور تمام زبانیں اس سے
    مستخرج ہیں ۲۵۱ح تا ۲۵۸ح
    عربی خاتم السن العالمین ہے جیسے رسول ؐ خاتم النبیین۲۵۸ح
    یہ دینی علوم کے اسرار کھولنے کے لئے بمنزلہ چابی کے ہے ۲۶۵
    عربی حب رسول اور حب قرآن کے لئے معیار ہے ۲۶۶
    انگریزی ‘ جرمن ‘ یونانی ‘ عبرانی ‘ ہندی‘ لاطینی ‘ چینی اور فارسی
    زبانوں کا ذکر، ان کے مادے عربی سے بدلے ہوئے ہیں ۲۵۸ح
    مسیح موعودؑ کے عربی شعر و قصائد
    اَطِعْ رَبَّکَ الجَبَّار اَھْل الاَوامِرٖ ۱۳۶،۱۳۷
    لمارأی النوکی خلاصۃ انصری ۱۵۷،۱۵۸


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 367
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 367
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/367/mode/1up

    الا یا ایّھَا الحُرّالکریم ۱۶۶
    احاط الناس من طغوی ظلام ۱۷۴
    تذکر موت دجال رذال ۲۰۶تا۲۱۰
    بوَحْشِ البر یُرجٰی الائتلاف ۲۲۹ تا ۲۳۱
    الا ایھا الا بّار مثل العقارب ۲۳۷
    الا لا تعبنی کالسّفیہ المشارز ۲۴۰
    علمی من الرحمن ذی الٰا لاء ۶ ۲۶تا ۲۸۲
    عقیدہ
    عقیدہ اجماعیہ کا منکر ملعون ہے ۱۴۴
    اجماعی عقیدہ سے منہ پھیرنا بدذاتی اوربے ایمانی ہے ۳۲ح
    عیسائیوں کے تثلیث اور کفارہ کے متعلق عقائد ۳۴
    ہمارے عقیدہ اور مذہب کا مؤید قرآن ، حدیث ، ائمہ
    عقل اور الہام متواتر ہے ۱۱۵
    ہمارا دین اسلام کتاب قرآن اور نبی خاتم النبیینؐ ہیں ۱۴۴
    علماء
    علماء کی فضلیت ان کے عربی جاننے کی وجہ سے ہوتی ہے ۲۶۵
    علماء زمین کے آفتاب اور ماہتاب کی طرح ہوتے ہیں ۲۹۵
    علماء اور فقراء کی دو قسمیں ۸۱تا۸۳
    مسلمان علماء کی حالت کہ وہ نصوص قرآنیہ و حدیثیہ
    سے منہ پھیرتے ہیں ۴۸
    علماء اعداء ملت کی اپنے عقائد سے مددکرتے ہیں ۱۴۶
    سلف صالحین علماء متقی تھے ۱۴۷
    علماء مساجد سے روکتے اور لوگوں کو گمراہ کرتے ہیں ۱۶۰
    علماء کو دعوت مباہلہ(دیکھئے زیر عنوان مباہلہ)
    علماء کے فتاویٰ(دیکھئے زیر عنوان فتاویٰ)
    علماء سے خطاب اور ان کے اوصاف کا تذکرہ ۱۸۴تا۱۸۶
    علماء میں نور اور فراست باقی نہیں رہا ۲۲۴
    علماء کی دنیا دارانہ‘ منافقانہ اور فاسقانہ حالت ۲۳۲تا ۲۳۴
    فصیح اللسان علما کو مقابلہ کا چیلنج ۲۳۵
    گرہن میں سرّ تھا کہ علماء کی ظلماتی حالت آسمان پر
    ظاہر کی جائے ۳۳۵
    نو۹ شریر متکبر مولویوں کا ذکر ۲۳۶تا۲۵۴
    علماء مسیح کے آسمان سے نزول کے منتظر ہیں ۱۲۸
    صالح علماء جو حضرت مسیح موعود ؑ پر ایمان لائے ، ان
    کے اوصاف کریمہ اور ان کے حق میں الہام ۱۴۰،۱۴۱
    عیسائیت
    عیسائی صرف مسیح کی زندگی تک حق پر قائم رہے ۳۲۱
    ان کے خیال کے مطابق خدانے اپنے بیٹے کو صلیب دی ۱۲۱ح
    عیسائی کبوتر شوق سے کھاتے ہیں حالانکہ ان کا دیوتا ہے ۴۱ح
    راستباز مسیحی کی علامت ۱۶
    عیسائی درحقیقت انسان پر ست ہیں ۴۱
    عیسائی جھوٹ بولنے میں سخت بیباک اور بے شرم ہیں ۱۸
    عیسائیوں کا فرقہ موحدین ۳۹ح،۴۲،۳۲۲
    اگر کسی عیسائی کو آتھم کے افتراء پر شک ہو تو آسمانی
    شہادت سے رفع شک کر الیوے ۱۵
    براہین احمدیہ میں عیسائیوں کے فتنہ کی پیشگوئی ۲۸۶
    نبی کریم ؐ کی عیسائیوں اور اہل اسلام میں جھگڑا ہونے
    کی پیشگوئی ۲۸۸
    عیسائی عقیدہ کہ خدا تین اقنوم ہیں باپ ،بیٹا اور
    روح القدس ۳۳،۳۴
    عیسائیوں کو مباہلہ کا چیلنج ۳۱،۳۳،۴۰
    عیسائیت کا زمانہ فساد معلوم کرنے کا عمدہ نقطہ ۳۲۱
    عیسائیت کی تعلیم کی رو سے خدا رحیم ثابت نہیں ہوتا ۱۲۱ح
    جزا سزا کا طریق ہندوؤں نے تناسخ اور عیسائیوں نے کفارہ
    بیان کیا ہے جو غیر معقول ہے اور ان کا ردّ ۱۰۶ تا۱۲۳ح
    حواریوں کے زمانہ میں عیسائی مذہب میں شرک کی
    تخم ریزی ہوئی ۳۲۱
    یسوع کا شیطان کے پیچھے جانا اور اسے تین مرتبہ
    شیطانی الہام کا ہونا ۲۹۰ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 368
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 368
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/368/mode/1up

    تیسری صدی عیسوی میں عیسائی مشرک اور موحد
    فرقہ کے درمیان مباحثہ ہوا ۳۲۲
    کفارہ اور تثلیث کے تمام اغراض صلیب کے ساتھ
    وابستہ ہیں ۴۶
    خدا نے یہود کی صلیب سے مسیح کو نجات دی اور اب
    چاہا کہ اسے نصاریٰ کی صلیب سے بچائے ۱۷۱،۱۳۲
    مسیح موعود ؑ کا صلیب کے غلبہ کے وقت آنا اور اسے توڑنا ۱۱۶
    یہ زمانہ صلیبی فتنہ کے تموج اور طوفان کا زمانہ ہے ۴۶
    تثلیث اور کفارہ کی نسبت عیسائی اعتقاد ۳۴
    موحد عیسائیوں کا فرقہ یونی ٹیرین ۳۹
    تثلیث
    عیسائیوں کا عقیدۂ تثلیث ۳۴
    عقیدہ تثلیث کا موجد بشپ اتھاناسی الیگزینڈرائن تھا ۳۹ح
    تین مجسم خدا ؤں کی جسمانی تثلیث کا نقشہ ۳۵
    اگر انسان کے کانشنس میں تثلیث کی ضرور ت ہوتی تو
    لوگوں سے اس کا مواخذہ ہوتا ۵
    تثلیث کی تعلیم سراسر جھوٹی اور شیطانی طریق ہے ۳۳
    جن کو خدا نے تین بنایا تھا ہرگز ایک نہیں ہو سکتے ۳۶
    تثلیث کا مسئلہ تیسری صدی کے بعد ایجاد ہوا ہے ۳۹ح،۴۲
    یسوع کو پیش آمدہ واقعات کی روسے ردّ تثلیث ۴۱
    اگر تثلیث کی تعلیم بنی اسرائیل کو دی جاتی تو وہ اسے نہ بھولتے ۵
    الوہیم کے لفظ سے تثلیث کے حق میں دلیل کا ردّ اور
    توریت میں اس لفظ کا استعمال ۶
    یہود میں تثلیث کا قائل کوئی فرقہ نہیں جبکہ عیسائیوں
    میں قدیم سے موحد فرقہ موجود ہے ۴۲
    کفارہ
    تثلیث اور کفارہ کی نسبت عیسائی اعتقاد ۳۴
    کفارہ اور تثلیث کے اغراض صلیب کے ساتھ وابستہ ہیں ۴۶
    نیکیوں کی اقسام اور نیکوں کے مصائب کاان کے گناہوں
    کا کفارہ ہونا ۱۲۴حتا۱۲۶ح
    پادری
    نادان پادریوں کی تمام یا وہ گوئی آتھم کی گردن پر ہے ۲
    پادریانہ مشرب رکھنے والے جھوٹ کے پتلے ہیں ۱۷
    آتھم پادریوں کا منہ کالا کر کے قبر میں داخل ہو چکا ہے ۲۹۲ح
    آتھم کے معاملہ میں شک کرنے والے پادری کودعوت مباہلہ ۳۲
    تمام پادری صاحبوں کے لئے احسن طریق فیصلہ ۳۴
    پادری ہمارے سید مولیٰ ؐ کی بے ادبیاں کر رہے ہیں ۳۰۷
    پادری اسلام کی توہین اور تحقیر کرتے ہیں ۳۶
    پادریوں کے سوا اور کوئی دجال اکبر نہیں ۴۷
    پادریوں کو بدزبانی اور گالیوں کا طریق چھوڑ نے کی تجویز ۲۹۳
    ایمان ہے تو ایک پادری بات سے الٹی جوتی کو سیدھا کر
    کے تو دکھلائے ۲۹۱
    آتھم کی پیشگوئی کی تکذیب میں پادریوں نے جھوٹ
    سے کام لیا ۳۲۹
    غضب
    اللہ تعالیٰ کاغضب انکار ، جسارت اور زیادتی کی وجہ سے
    نازل ہوتا ہے ۲۱۵
    غیب
    اللہ غیب سے اسی کو آگاہ کرتا ہے جسے اس نے خود
    پاک فرمایا ہو ۸۵
    مسیح موعودؑ کو خدا کے علم ازلی میں پوشیدہ امور کی خبر دیا جانا ۷۶
    مسیح موعود ؑ کے ظہور میں آنے والے امور غیبیہ ۲۹۷
    ف۔ق۔ک۔گ
    فتنہ
    فتنہ کو فرو کرنا راستبازوں کا فرض ہے ۴۱
    فتنہ تکفیر حد سے زیادہ گزر گیا ہے ۴۵
    یہ زمانہ صلیبی فتنہ کے تموج اور طوفان کا زمانہ ہے ۴۶


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 369
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 369
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/369/mode/1up

    حضورؑ کی نسبت وقوع میں آنے والے دو عظیم فتنے ۳۴۱
    فتاویٰ
    احمدیوں کے خلاف مولویوں کے فتووں کا ذکر ۸۰،۸۱
    مسیح موعودؑ کے خلاف مولوی نذیر حسین کا دجالانہ فتویٰ
    سراسر افتراء ہے ۳۹
    فرشتے
    مسیح موعودؑ کو ملائک سے انکاری کہنا افتراء ہے ۴۵
    آتھم کو فرشتے نظر آنا اور اس کا کہنا کہ’’ میں خونی
    فرشتوں سے ڈرتا ہوں‘‘ ۱۸،۱۹
    فری میسن
    فری میسن کے لوگ اپنا راز ظاہر کرنا مناسب نہیں سمجھتے ۲۱
    قرآن کریم (نیز دیکھئے زیر عنوان تفسیر)
    ۸ح،۱۳،۲۶ح،۲۷ح،۲۸،۲۹ح،۳۲ح،۳۴،۴۲،۵۰،
    ۵۲،۶۳ح،۸۲،۸۳،۸۴،۱۲۸،۱۳۲،۱۳۳،۱۴۸،۱۴۹،۱۵۳،
    ۱۵۴،۱۵۸،۱۵۹ ۲۲۶،۲۶۵،۲۹۹ح،۳۱۴ح
    قرآن خدا کا پاک کلام اور ہر غلطی اور ضلالت سے پاک ہے ۳۳
    َقرآن شریف اپنے جلالی اور جمالی احکام میں عدل ، رحم
    اور احسان پر چلتا ہے جس کی نظیر دنیا کی کسی کتاب میں نہیں ۳۷
    قرآن نے دجال اکبر پادریوں کو ٹھہرایا ہے ۴۷
    خدا نے دوسری قوموں کے دجل قرآن شریف
    میں بیان فرمائے ہیں ۴۷
    خدا نے قرآن کریم کو ام الکتب بنایا اور اس میں اولین
    و آخرین کی کتب کا خلاصہ ہے ۲۵۹ح
    قرآن کے مطابق زمین پر اہل اسلام یا نصاریٰ میں
    سے ایک کا غلبہ رہے گا ۴۸
    خدا نے قرآن شریف میں افترا باندھنے والے
    سے بیزاری ظاہر کی ہے ۴۹
    قرآن کریم کا علم اکثر لوگوں سے جاتا رہا ہے ۳۱ح
    خدا نے یسوع کی قرآن شریف میں کچھ خبر نہیں دی ۲۹۳ح
    قرآن کریم صاف کہتا ہے کہ مسیح وفات پا کر آسمان پر
    اٹھایا گیا ہے ۳۲۱
    قرآن کریم کے بارہ میں حضرت مسیح موعودؑ کی تعلیم ۳۴۵
    آخری زمانہ کی پوری ہونے والی قرآنی پیشگوئیاں ۱۴۲
    سورۂ فاتحہ کی چار ام الصفات کی لطیف تشریح ۸ح
    فاتحہ میں معارف الہیٰہ میں سے ایک قابل قدر نکتہ کا ذکر ۱۰ح
    قرآن اور رسول کریم ؐ کی سچی محبت اور تابعداری
    انسان کو صاحب کرامات بنا دیتا ہے ۳۴۵
    قَسم
    خدا کی قسم سے انکارکرنے والا نیست ونابود کیا جائے گا ۱
    آتھم نے قسم سے پہلو تہی کر کے جتلادیا کہ اس نے
    رجوع بحق کیا ہے ۲
    عیسائیوں کے نزدیک جھگڑا ختم کرنے کی خاطر قسم
    کھانا واجب ہے ۱۹۵
    کاذب
    کاذب ہو نا قطعی طور پر روایت کو رد نہیں کر سکتا ۳۳۳
    کاذب پہلے قبول کیا جاتا مگر آخر ذلیل ہوتا ہے ۳۳۵
    کسوف و خسوف
    خسوف و کسوف کی نسبت عربی رسالہ ۲۹۴
    خسوف و کسوف ایک غضب اور انذار کا نشان ہے ۳۳۵
    حدیث میں گرہن کے وقت نماز کسوف و خسوف
    پڑھنے ،استغفار کرنے اور صدقہ دینے کا حکم ۳۳۵
    کسوف و خسوف زمینی لوگوں کی ظلماتی حالت کا
    شاہد ہوتا ہے ۳۳۶
    مہدی موعود کا نشان خسوف و کسوف ٹھہرائے جانے
    میں حکمت ۲۹۵،۳۳۵
    حدیث میں دو خسوف و کسوف کا وعدہ تھا ایک علماء وفقراء
    کے دلوں کا دوسرے چاند اور سورج کا ۲۹۶


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 370
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 370
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/370/mode/1up

    کسی مدعی کے دعویٰ کے وقت کبھی کسوف و خسوف رمضان
    میں ان تاریخوں میں نہیں ہوا ۳۳۰،۲۹۴
    مہینے کی پہلی رات چاند گرہن مقصود ہوتا تو حدیث میں قمر
    کی بجا ئے ہلال کا لفظ آتا اس لئے پہلی رات سے مراد
    چاند گرہن کی پہلی رات ہے ۳۳۱
    چاند گرہن اور سور ج گرہن کیلئے مقررہ تاریخیں ۳۳۱
    چاند گرہن تیرہ اور سورج گرہن اٹھائیس رمضان کو ہوا ۳۳۴
    حدیث میں خسوف و کسوف کی کوئی نرالی حالت بیان کرنا
    مقصودنہیں بلکہ مہدی کے ساتھ تخصیص مقصود ہے ۳۳۲
    اخبارات کا اقرار کہ یہگرہن ایسا عجیب ہے کہ پہلے اس
    شکل وصورت پر کبھی نہیں ہوا ۳۳۳
    خسوف و کسوف کے بارہ میں عبد الحق غزنوی کا وسوسہ
    اور اس کا جواب ۳۳۴
    کشف
    حضورؑ کا کشف میں احمد بیگ کی ساس کو متمثل دیکھنا ۲۱۳،۲۹۸
    عالم مکاشفہ میں مسیح موعودؑ کے چوتھے بیٹے کی روح کا
    آپ کی پشت میں حرکت کرنا ۱۸۳
    حضورؑ کا جلسہ مذاہب میں مضمون بالا رہنے کی نسبت کشف ۳۰۰ح
    مولوی عبداللہ کاقادیان میں نور اترنے والا کشف ۳۴۳
    عالم کشف میں پیر صاحب العلم کاآنحضرتؐکو دیکھنا ۳۴۴
    خدا بدکاروں کو بھی رؤیا ،کشف یا الہام کا مزہ چکھاتا ہے ۳۰۲ح
    کفارہ
    تثلیث اور کفارہ کی نسبت عیسائی اعتقاد ۳۴
    کفارہ اور تثلیث کے اغراض صلیب کے ساتھ وابستہ ہیں ۴۶
    نیکیوں کی اقسام اور نیکوں کے مصائب کاان کے گناہوں
    کا کفارہ ہونا ۱۲۴حتا۱۲۶ح
    گالی
    یسوع نے معجزہ مانگنے والوں کو گندی گالیاں دیں ۲۹۰ح
    پادریوں کانبی کریم ؐ کو گالیاں دینا ۳۸
    پادریوں کو چاہئے کہ گالیوں کا طریق چھوڑ دیں ۲۹۳ح
    سعد اللہ کا حضورؑ کو گالیوں سے بھری نظم بھیجنا ۵۸ح
    گرہن (دیکھئے زیر عنوان کسوف و خسوف)
    گناہ
    جب قوت استقامت باقی نہیں رہتی تو انسان گناہ کی
    طرف جھک جاتا ہے ۵۶
    ل۔م
    ***
    واویلا اور *** ایک ہی چیز ہے ۳۲
    ہر *** کے بعد ایک شفقت اور رحمد لی مقدّر ہے ۱۱۹ح
    جو نہ مقابلہ کرے نہ تکذیب سے باز آئے اس پر خدا ،
    فرشتوں اور صلحاء کی *** ہے ۳۰۳ح
    مباحثہ
    مباحثات کے بڑھنے سے کینے ترقی کرتے جاتے ہیں ۳۹
    مسیح موعودؑ کا مباحثات سے اعراض کے ارادہ کااظہار ۲۸۲
    مشرک اور موحد عیسائی فرقوں میں مباحثہ ۳۹ح،۳۲۲
    مباہلہ
    آیت مباہلہ کی تفسیر ۳۲۰
    مسیح موعود ؑ کامولویوں کو دعوت مباہلہ دینے کا الٰہی حکم ۶۴
    غزنوی گروہ کے عبدالحق کے مباہلہ کاجھوٹااثر اور اس کا جواب ۳۴۲
    مباہلہ کا چیلنج
    مباہلہ کے مخاطب مولویوں اور سجادہ نشینوں کے اسماء ۶۹تا۷۲
    کافر قرار دینے والے مولویوں کو مباہلہ کی دعوت
    کا اشتہار ۴۵،۳۰۴،۳۰۵ح،۳۱۷ح
    مقابلہ و مباہلہ کے لئے بلائے گئے بعض علماء کے اسماء ۲۸۲ح
    عیسائیوں کواسلام اور عیسائیت کا مباہلہکرنے کی دعوت ۳۳


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 371
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 371
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/371/mode/1up

    عیسائیوں کو خدا سے فیصلہ کرانے کی دعوت ۴۰،۴۴
    آتھم کی موت کے بارے میں شک کرنے والے
    عیسائیوں کو مباہلہ کا چیلنج ۳۱،۳۲
    مباہلہ کا طریق
    مسنون طریق مباہلہ یہی ہے کہ لوگ مدعی مامور من اللہ
    سے مباہلہ کریں ۳۱۹
    تعالواجمع کے صیغہ سے نبی کے مقابل ایک جماعت
    کو مباہلہ کیلئے بلایا گیا ہے ۳۲۰
    مباہلہ کرنے والے کم سے کم دس ہوں ۶۷،۳۰۵ح،۳۱۷ح
    مسیح موعود ؑ کا الہامات کو ہاتھ میں لے کرمباہلہ کرنا ۵۱،۱۶۲
    مباہلہ سے قبل مسنون استخارہ کرنے کی تجویز ۱۶۴
    ہر مباہلہ کرنے والا اشتہار شائع کرے ۳۱۷ح
    پچاس کوس سے زیادہ فاصلہ پر رہنے والو ں کیلئے طریق مباہلہ ۳۱۸ح
    پچاس کوس کے اندررہنے والوں کیلئے طریق مباہلہ ۳۱۹ح
    مباہلہ کی دعا اور شرائط
    دعائے مباہلہ کا طریق اور شرائط ۳۳،۴۴،۶۵،۶۶
    مباہلہ کیلئے فریقین کی دعائیں اور شرائط ۱۶۳،۱۶۴
    مسیح موعودؑ کی تحریر فرمودہ دعائے مباہلہ کی عبارت ۳۱۷ح
    مباہلہ کے بعد کی برکات و ترقیات
    مولوی عبد الحق سے مباہلہ کے بعد عزت اور ترقی کا باعث
    بننے والے امور ۳۰۹ح تا۳۱۴ح،۳۱۷ح،۳۴۲
    مباہلہ کے بعد وارد ہونے والی جسمانی نعمتیں ۳۱۲ح
    مثال
    مخلوق میں تفاوت اور اس کی تفصیل ایک مثال سے ۸۸تا۹۲
    ایک بندہ جو بظاہر فاسق معلوم نہیں ہوتا عالم ہو کر
    بھی جاہل ثابت ہوتا ہے کی مثال ۹۵
    ایک شخص کے نازو نعمت اور سعید وحمید زندگی بسرکرنے والے
    اورتنعم کی زندگی بسر کرنے والے فاسق شخص کی مثالیں ۹۵تا۱۱۰
    مجدد
    خدا ہر صدی کے سر پر مجدد مبعوث فرماتا ہے ۷۸
    مجدد کی ضرورت کے لئے وقت کی فریاد ۱۷۳،۳۲۱
    مجدد اور اس کے قول کی سچائی کے بارہ میں جلد بازی
    سے کام نہیں لینا چاہیے ۹۲
    حضرت مسیح موعود ؑ چودھویں کے مجدد ہیں ۴۵،۱۷۲
    ہر مجدد کا بلحاظ حالت موجودہ زمانہ خاص کام ہوتا ہے ۴۶
    مجدد کا نام مسیح ابن مریم رکھا جانے کی وجہ ۳۲۱
    مخالفت(مسیح موعود علیہ السلام کی)
    نو اشخاص جنہوں نے کافر کہا اور گالیاں دیں ۲۵۱،۲۵۲
    دو شیخوں کو مباہلہ کا نشان دیکھنے اور عربی میں مقابلہ کی دعوت ۲۵۳
    مخالفوں نے اقرار کیا کہ مضمون بالا رہا ۳۰۰
    تین امور میں مخالفین کو دعوت مقابلہ ۳۰۳ح
    مخالفین کی ذلت اور بد انجام ۳۳۷
    خدا کی رحمت اور فضل نے ان تکالیف سے بچایا جن
    میں مخالف گرفتار ہیں ۳۱۴ح
    مسیح موعود ؑ کی مخالف مولویوں کو صحبت میں رہنے کی دعوت ۳۴۷
    مذہب
    بجز اسلام تمام مذاہب مردے ہیں ۳۴۶
    جھوٹے پر بغیر تعیّن *** کرنا کسی مذہب میں ناجائز نہیں ۳۱
    ’’دنیا کے جھوٹے مذاہب کی ابتداء کسی افتراء سے
    ہوئی ہو گی‘‘ کی وضاحت ۶۳ح
    خراب مذہب جس میں شرک اور باطل کی ملونی ہو ۳۰۰ح
    معجزات
    نبی کریم ؐ کاامساک باراں کے بعد بارش برسانے کا معجزہ ۲۸۵
    یسوع کا معجزہ مانگنے والوں کو گندی گالیاں دینا ۲۹۰ح
    یسوع کے معجزات کی حقیقت کھولنے والاتالاب ۲۹۱ح
    مسیح موعودؑ کو معجزات انبیاء سے انکار نہیں ۴۵


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 372
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 372
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/372/mode/1up

    مفتری
    قرآن،توریت اور انجیل گواہ ہیں کہ افترا کرنے والا
    جلد تباہ ہو جاتا ہے ۶۳، ۶۴
    خدا مفتری کو جلد پکڑتاہے اور اس کی غیرت اسے ہلاک
    کر دیتی ہے ۴۹‘۱۲۷
    ملائک (دیکھئے زیر عنوان فرشتے)
    مولوی
    اے بدذات فرقہ مولویاں تم کب تک حق کو چھپاؤ گے ۲۱ح
    مولویوں نے امر تکفیر میں اپنی عقل سے کام نہیں لیا ۴۵
    انہوں نے اہل اسلام میں فتنہ اور تفرقہ ڈال رکھا ہے ۴۸
    مولویوں کو صداقت مسیح موعودؑ سمجھنے کے لئے دیے
    جانے والے پانچ قرائن ۴۹
    یہ ان یہودیوں سے مشابہ ہیں جنہوں نے عیسیٰؑ کی
    مخبری کی ۶۸
    مولوی منہ سے اقرا رنہ کریں مگر دل اقرار کر گئے ہیں ۲۹۰
    اگر کوئی مولوی معارف قرآنی میں مقابلہ کرنا چاہے
    تو نہایت ذلیل ہو گا ۲۹۳
    ان مولویوں نے علم تو پڑھا مگر عقل اب تک نزدیک
    نہیں آئی ۲۹۵
    آنحضرت ؐ نے ان لوگوں کا نام یہودی رکھا ۳۲۹
    خبیث طبع مولوی یہودیت کا خمیر اپنے اندر رکھتے ہیں ۳۰۵
    یہودیوں کیلئے کتابوں سے لدئے ہوئے گدھے کی
    مثال ہے مگر یہ خالی گدھے ہیں ۳۳۱
    مسلمان صورت مولوی جو دراصل یہودی سیرت ہیں ۳۳۹
    آتھم کی پیشگوئی سے یہودی سیرت مولوی سخت ذلیل ہو گئے۴ ۲ح
    مولوی اس اندھے سے مشابہت رکھتے ہیں جو آفتاب
    کے وجود سے منکر ہو گیا ۳۰۶
    ایک شریر کا مشہور کرناکہ ایسا وردبتا سکتا ہوں کہ پہلی رات
    خدا نظر آ جائے گا بشرطیکہ پڑھنے والا حرام کی اولاد نہ ہو ۲۸۹ح
    افسوس یہ مولوی کہلانے کا شوق رکھتے ہیں مگر
    تقویٰ و دیانت سے دور ہیں ۳۰۷
    مولوی نہیں چاہتے کہ کوئی پیشگوئی آنحضورؐکی پوری ہو ۳۲۹
    حضورؑ کے دعویٰ پر آسمان نے گواہی دی مگر ظالم
    مولوی منکر ہیں ۳۳۰
    اے اسلام کے عار مولویو! ذرا آنکھیں کھولو ۳۳۲
    مولویوں نے نشانوں کی تکذیب پر کمر باندھی ہے ۳۳۶
    مہدی موعود
    مہدی موعود کا نشان خسوف کسوف ٹھہرائے جانے میں حکمت ۲۹۵
    موعود مہدی کے نام میں اشارہ ہے کہ لوگ اس کو
    مہدی یعنی ہدایت یافتہ نہیں سمجھیں گے ۲۹۶
    مہدی کو حدیث میںآل محمد ؐٹھہرا یا جس طرح
    عیسائیوں کو آل عیسیٰ ٹھہرایا گیا ۲۹۶
    مہدی اور مسیح موعود کا زمانہ چودھویں صدی ہے ۳۲۲
    مہدی کے اصحاب کا شمار اہل بدر کے شمار کے برابر ہوگا ۳۲۵
    مہدی کے پاس ایک کتاب ہو گی جس میں اس کے
    ۳۱۳ صحابہ کا نام درج ہوگا ۳۲۴،۳۲۹
    مہدی اس گاؤں سے نکلے گا جس کا نام کدعہ ہے ۳۲۵،۳۲۹
    ن
    نبوت
    آنحضرت خاتم النبیین ؐ کے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا
    نہ کوئی پرانا نہ کوئی نیا۔آپؐ کے دامن فیض سے جدا
    ہو کر براہ راست نبی کہلانے والا ملحد و بے دین ہے ۲۷ح
    یہ افتراء ہے کہ مسیح موعودؑ خود دعویٰ نبوت کرتے ہیں
    یا سید المرسلین ؐ کو خاتم الانبیاء نہیں سمجھتے ۴۵
    ایسا شخص جو قرآن شریف پر ایمان رکھتا ہے کہہ سکتا ہے
    کہ میں آنحضرت ؐ کے بعد رسول اور نبی ہوں ۲۷
    مسیح موعود کوآنحضرت ؐ کا نبی اللہ فرمانا مجازی معنوں کی
    رو سے ہے جس سے مراد مکالمات الٰہیہ ہے ۲۸ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 373
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 373
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/373/mode/1up

    مریم کا بیٹا خدا نہیں انسان اور نبی تھا ۳۳
    آنحضرتؐ کے اصحاب نے چشم ۂ نبوت سے علم حاصل کیا ۱۳۰
    عربی خا تم السن العالمین ہے جیسے رسولؐ خاتم النبیین ۲۵۸ح
    انبیاء کو توحید کے خیموں کیلئے بطور طنابوں کے بنایا ۷۳
    آنحضرتؐ، موسیٰ اور عیسیٰ ؑ کے مخالفین کی بے ادبیوں
    اور شوخیوں کا ذکر ۳۰۷ح
    یسوع کاآنے والے نبی سے انکار کرنا اور کہنا کہ سب
    جھوٹے آئیں گے ۲۹۳ح
    نجات
    بجز توحید کے نجات نہیں ۳۴
    دنیا کی نجات کی نسبت عیسائی تعلیم ۳۳
    سب لوگ مدارج نجات میں برابر نہیں ۱۱۹ح
    عیسائیوں کا طریق نجات عدل و احسان اور رفق پر مبنی نہیں ۱۲۱ح
    نزول مسیح
    آنحضرت ؐ کی پیشگوئی میں مسیح کے لئے لفظ رجوع
    نہیں بلکہ نزول آیا ہے ۱۱۱،۱۵۱
    اہل معرفت کے نزدیک رجوع اور نزول میں بہت فرق ہے ۱۱۲
    حدیث میں آسمان سے نزول کا لفظ نہیں آیا ۱۲۹
    مسیح کا منارۂ دمشق کے پاس ظاہرًانزول بوجہ وفات
    پا جانے غیر ممکن ہے ۱۳۱
    آثار کے تواتر کی رو سے نزول بھی حق ہے ۱۵۰،۱۵۸
    بروزی نزول صحف سابقہ سے ثابت ہے شخصی
    ثابت نہیں ۱۲۸،۱۴۸
    حضرت عیسیٰ ؑ نے ایلیا کے نزول کی تاویل کی ۱۲۸،۱۴۹
    عیسیٰ کا اس وقت نزول ایلیا کے گزشتہ زمانہ میں
    نزول کی طرح ہے ۱۲۹
    نزول صعود کی فرع ہے جب مسیح کا صعود الی السماء ثابت
    نہیں تو نزول کیسے ہو سکتا ہے ۱۶۸،۱۶۹
    مسیح وفات پا کر آسمان پر اٹھایا گیا لہٰذا اس کا نزول
    بروزی ہے نہ کہ حقیقی ۳۲۱
    نشا ن ؍نشانات
    نشانات کا تذکرہ کرنے کی غرض ۱۸۵
    خدا مامور کو پناہ میں لانے کیلئے خارق عادت امر
    ظاہر کرتا ہے جو آیت یعنی نشان ہے ۳۳۴
    ایک صاحب کے سوال کہمسیح موعودؑ کے دعویٰ کی تائید
    میں خدا کی طرف سے کونسے نشان ظاہر ہوئے کا تفصیلی
    جواب اور نشانات کا ذکر ۲۸۵
    مسیح موعود کے ساتھ خدا کے چھ طور کے نشان ہونا اور
    ان کی تفصیل ۳۰۴تا۳۱۱
    آتھم کی موت میں بہت سے نشانات ہیں ۲۰۶
    نشان سچے مدعی کے دعویٰ کی تصدیق کیلئے ہوتے ہیں ۳۳۴
    ہر ایک نشان میں ایک سِرّ ہوا کرتا ہے ۳۳۵
    خدا کے نشان بارش کی طرح برس رہے ہیں ۳۴۷
    نیکی
    نیکیوں کی اقسام اور نیکوں کے مصائب کاان کے گناہوں
    کا کفارہ ہونا ۱۲۴حتا۱۲۶ح
    و۔ہ۔ی
    وعید
    وعید کی پیشگوئی کی معیاد کا تخلف جائز ہے ۲۹
    وعید بظاہر شروط سے خالی ہو مگر ارادہ الٰہی میں شروط ہوتی ہیں ۱۰
    وعید سے متعلق سنت اللہ یہی ہے کہ شرط نہ بھی ہو پھر بھی
    توبہ ورجوع سے ٹل جاتی ہے ۲۹۷
    وعید کی معیاد تو بہ اور خوف سے ٹل سکتی ہے ۲۹
    اللہ وعید کی شرط کو باطل نہیں کرتا ۲۲۲
    وفات مسیح
    فَلَمَّا تَوَفَّیْتَنِیْکی تفسیر ۱۳۴،۱۳۵،۱۵۴،۱۵۶،۳۲۱


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 374
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 374
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/374/mode/1up

    لفظ توفّی کے مختلف معنی ۱۳۰،۱۳۱،۱۳۴،۱۵۴،۱۵۵
    لفظ توفّیکے موت کے سوا معنوں کی تائیدمیں صحابہ کا
    کوئی اثر یا کوئی حدیث نہیں ۱۳۳
    توفّی میں جب فاعل اللہ، مفعول مردوں یا عورتوں میں
    سے کوئی ہو تو قبض روح یا مارنے کیلئے ہی آتا ہے ۱۵۳
    لفظ تو فّی کو کسی کلام اور شعراء کے شعر میں سوائے بقا
    کے ساتھ موت کے نہیں پایا ۱۵۶
    وفات مسیح پر کتب حضرت مسیح موعودؑ کے اسماء ۴۸ح
    مسیح موعودؑ کواللہ نے عیسیٰؑ کی وفات کی خبر دی ۸۰
    خدا اور رسول کی وفات مسیح کے متعلق شہادت ۱۱۱،۱۳۰
    امام مالک ، امام ابن حزم اور امام بخاری وفات مسیح
    کے قائل تھے ۴۸،۶۸،۱۳۲
    وفات مسیح پر اجماع ۱۳۲
    وفات مسیح قرآن وحدیث ، اہل زمانہ کی شہادت اور عقل
    سے بپایۂ ثبوت پہنچ گئی ۱۲۸،۱۳۵،۱۴۸،۱۵۸،۳۱۹،۳۲۱
    آنحضرت ؐ نے معراج کی رات عیسیٰ ؑ کو فوت شدہ
    انبیاء میں دیکھا ۱۳۳
    حدیث میں آنحضرتؐ کی عمر مسیح کی عمر سے نصف بتایا جانا ۱۴۸
    ولایت
    خدانے اولیاء کو توحید کے خیموں کیلئے بطور میخوں کے بنایا ۷۳
    اولیاء ہر قسم کی کجی سے بچائے جاتے ہیں ۸۶
    انجام کار اولیاء اللہ مخالفوں پر غالب آتے ہیں ۲۶۵
    ویل
    ویل کا لفظ بددعا کیلئے آتا ہے ۴۱
    ویل کے لفظ کو استعمال کرنا عیسائیوں پر واجب ہے اور
    اس کے معنی سختی ، *** اور ہلاکت کے ہیں ۴۴
    ہندو مذہب ۴۵
    ہندواپنے دیوتا بیل کو نہیں کھاتے ۴۱ح
    وہ پسند کرتے ہیں کہ فحاشی ہمیشہ کیلئے قائم رہے ۱۲۳ح
    براہمنوں کا کہناکہ طبقات میں تفاوت پچھلے جنم کے
    اعمال کے باعث ہے ۱۰۵
    وہ کہتے ہیں کہ مخلوقات کی اصل کا کوئی خالق نہیں ۱۰۸
    انہوں نے اپنے خیالات میں تنا قضات کو جمع کر لیاہے ۱۲۲
    جزا سزا کا طریق ہندوؤں نے تناسخ اور عیسائیوں نے کفارہ
    بیان کیا ہے جو غیر معقول ہے اور ان کا ردّ ۱۰۶تا۱۲۳ح
    ہندوؤں کا عقیدہ تناسخ
    یہ عقیدہ الٰہی نظام رحمانیت کے خلاف ہے ۱۰۶ح
    یہ خدائے قادرو خالق کو ضعیف و بیکار بنا ڈالتا ہے ۱۰۷ح
    قائلین تناسخ کو خدا کی طرح روح اور مادہ کو قدیم ماننا پڑتا
    ہے اس صورت میں وہ رب العالمین نہیں ہو سکتا ۱۰۸ح
    یہ امر خدا کی طرف سے ہوتا تو لوگوں کی قلت و کثرت
    حیوانات کی تعداد کے تغیر کے برابر ہوتی ۱۱۲ح
    ارواح کا آسمان سے نازل ہوناباطل اور بے دلیل ہے ۱۱۳ح
    اگر اجرام فلکی میں لوگ آباد ہیں تو ارواح کو زمین پر
    بھیجنے کے کوئی معنے نہیں ۱۱۴ح
    تناسخ ماننے سے نکاح سے بھی اجتناب کرنا چاہئے ۱۲۲ح
    کوئی ثبو ت نہیں کہ دنیا میں آنے والی روح دوبارہ آئی ہے ۱۵۵
    براہمن تفاوت مراتب مخلوقات کے تناظر میں تناسخ پر
    ایمان رکھتے ہیں ۱۰۵ح
    یا جوج ماجوج
    مسیح یاجو ج ماجوج سے جنگ نہیں کرے گا ۱۳۸
    یاجوج و ماجوج اور ان کی افواج ظاہر کر دی گئیں ۱۴۲
    یوم الدین
    اس عالم کے بعد ایک اور عالم ہے جسے یوم الدین کا
    نام دیا گیا ہے ۱۲۴ح
    یونی ٹیرین
    عیسائی موحدین کا فرقہ جو یسوع کو انسان اور رسول جانتا ہے ۳۹ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 375
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 375
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/375/mode/1up

    اس فرقے کے لاکھوں انسان یورپ اور امریکہ میں موجود ہیں ۴۲
    مشرک و موحد فرقہ کے درمیان مباحثہ ۳۹،۳۲۲
    یہودیت ۴۰،۴۱،۴۵
    یہود گواہی دیتے ہیں کہ تثلیث کی تعلیم ہمیں نہیں ملی ۵
    اگر یہود کو خبر دی جاتی کہ خدا عورت کے پیٹ سے پیدا
    ہونے والا ہے تو انکار نہ کرتے ۶
    ان میں ایسا فرقہ نہیں جو تثلیث کا قائل ہو ۴۲
    یہود نے ایلیا کی پیشگوئی کی تاویل پر مسیح کی تکفیر کی ۱۲۸
    یہودیوں پر واویلا یسوع کے کلام میں آیا ہے ۳۲
    یسوع نے یہودی استادسے توریت پڑھی ۲۹۰ح
    یسوع کایہود کے علماء کوسانپ اور سانپ کے بچے کہنا ۴۱


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 376
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 376
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/376/mode/1up

    آ۔ا
    آدم علیہ السلام ۳۴،۵۷ح
    آتھم ۔ دیکھئے عبداللہ آتھم
    آغاخان مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    ابراہیم بیگ میرزا ۳۲۷
    ابراہیم علیہ السلام حضرت ۱۳۲
    ابراہیم صالح محمد حاجی اللہ رکھا سیٹھ ۳۲۶
    ابراہیم منشی۔ لدھیانہ ۳۲۶
    ابراہیم میاں ۔پنڈوری ۳۲۷
    ابرہہ
    اس نے خانہ کعبہ پر حملہ کیا تھا ۲۵۵
    ابن حزم امام ۴۸،۸۶،۱۳۲
    ابن عباس رضی اللہ عنہ ۳۰ح
    ابو الحمید مولوی ۳۲۵
    ابوالمویدامروہی مولوی مالک رسالہ مظہر الاسلام اجمیر
    مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    ابو بکر صدیق حضرت رضی اللہ عنہ ۱۱۱
    ابو زید ۲۴۴
    ابو سعید شاہ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    اتھاناسی اس الگزنڈرائن بشپ۔ تثلیث کا موجد ۳۹ح
    احتشام الدین مولوی ۔ مرادآباد۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    احمد حاجی۔ بخارا ۳۲۶
    احمد اللہ امرتسری مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰،۳۰۱،۳۰۹ح،۳۱۸ح
    احمد اللہ خان حافظ حاجی مولوی ۳۲۲
    احمد بیگ مرزا ہوشیار پوری ۲۸ح،۳۱ح،۳۲ح،۲۱۰،
    ۲۱۳،۲۱۴ح،۲۱۵،۲۱۸،۲۱۹،۲۲۱،۲۹۷،۲۹۸،۳۳۷،۳۳۹
    احمد بیگ اور اس کے اہل خانہ کے حالات ۲۱۲
    احمد بیگ کی موت کے بعد رشتہ داروں کی حالت ۲۲۰
    مسیح موعودؑ کی پیشگوئی متعلقہ احمد بیگ
    براہین احمدیہ میں احمد بیگ اور اس کے داماد کے
    متعلق پیشگوئی ۳۳۸،۳۳۹
    احمد بیگ کے دامادکا خسر کی موت سے ڈر کر توبہ ورجوع
    کا اقرار بطور ثبوت ان کے خطوط کا ذکر ۲۹ح،۳۰ح
    نفس پیشگوئی داماد احمدبیگ تقدیرمبرم ہے اس کی تفصیل
    اور پیشگوئی کے عربی الفاظ ۳۱ح،۳۲ح
    پیشگوئی کا اپنے دو پہلوؤں میں سے ایک پر پورا ہونا ۱۷
    احمد بیگ کی پیشگوئی مشروط بہ شرط تھی اور اس کی وفات
    سے ڈر کر اہل خانہ کا تضرع اور دعا ۳۳۷
    داماد احمدبیگ میعاد مقررہ میں نہ مرنے پر اعتراض کا
    تفصیلی جواب ۲۱۰تا۲۲۵
    دو بکریوں کے ذبح ہونے کی پیشگوئی احمد بیگ اور
    اس کے داماد کی طرف اشارہ ہے ۳۴۱
    احمد جان لدھیانوی حاجی منشی ۳۱۴ح،۳۲۶
    آپ حضرت مسیح موعودؑ کے اول درجہ کے معتقدین میں
    سے تھے ۳۴۵


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 377
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 377
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/377/mode/1up

    احمد جان مدرس مولوی ۳۲۷
    احمد حسن ابن محمد احسن امروہی ۳۲۶
    احمد حسن ۳۱ح
    احمد حسن شوکت مولوی مالک اخبار شحنہ ہند ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    احمد حسن کنج پوری مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    احمد دین سادھوکے۔ مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    احمد دین آف کھاریاں ۳۲۸
    احمددین آف منارہ ۳۲۸
    احمد دین مولوی حافظ ۳۲۷
    احمد مولوی رامپور ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    احمد شاہ سید ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    احمد عبدالرحمن حاجی اللہ رکھا سیٹھ ۳۲۶
    آپ کی غیر معمولی مالی قربانیوں کا ذکر ۳۱۲ح
    احمد علی سہارنپوری مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰،۲۵۱
    احمد علی شاہ سید ۳۲۷
    اسلام احمد مستری ۳۲۸
    اسماعیل امرتسری میاں ۳۲۷
    اسمٰعیل قاضی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    اسماعیل میاںآف سرساوہ ۳۲۶
    اشرف شاہ ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    اصغر علی شاہ سید ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    اصغر علی مولوی آف لاہور۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰،۲۳۸
    افتخار احمد لدھیانوی صاحبزادہ ۳۲۵،۳۱۴ح
    اکبر بیگ میرزا ۳۲۷
    التفات احمد شاہ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    اللہ داد کلرک منشی ۳۲۸
    اللہ دتا بلائی ۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    اللہ دتاخان میاں ۳۲۷
    اللہ دتا میاں آف جموں ۳۲۷
    اللہ دتا میاں سیالکوٹی ۳۳۹ح،۳۴۲
    اللہ دتا میاں آف گوجرانوالہ ۳۲۷
    اللہ رکھا حاجی ۳۲۵
    الہ بخش تونسوی شیخ ۲۵۲
    الہ بخش منشی ۳۲۷
    الہ بخش میاں۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    الہ بخش میاں آف امرتسر ۳۲۷
    الہ دین شیخ حافظ ۳۲۸
    الٰہی بخش ملتانی بابو ۲۱۵ح
    الیاس علیہ السلام ۱۴۹
    امام الدین منشی ۳۲۷
    امام الدین میاں۔ سیکھواں ۳۱۳ح، ۳۲۵
    امانت خان منشی ۳۲۷
    امداد علی شاہ میر۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    امیرحسین خلف پیر عبداللہ ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    امیر حسین قاضی۔بھیرہ ۳۲۶
    امیر علی شاہ سارجنٹ۔ سید ۳۲۶


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 378
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 378
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/378/mode/1up


    امیر علی شاہ مولوی آف اجمیر ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    امیر علی آف سہارنپور۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    امین بیگ میرزا ۳۲۵
    اہتمام علی سید ۳۲۸
    ایری اس بشپ تثلیث کا منکر ۳۹ح
    ایلیا ۱۲،۱۴۹،۱۵۹،۳۰۷ح
    عیسیٰ ؑ نے آپ کے نزول کی پیشگوئی کی تاویل کی ۱۲۸
    ایوب بیگ میرزا ۳۲۵
    ب۔پ۔ت۔ٹ۔ث
    بادل شاہ بدایونی مرزا۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    بخاری امام (دیکھئے محمد بن اسماعیل بخاری)
    بدرالدین شاہ ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    برکت علی مرحوم ۳۲۸
    برہان الدین جہلمی مولوی ۳۱۳ح،۳۲۶،۳۲۷
    بشیر احمد مرزا(فرزند حضرت مسیح موعود ؑ ) ۲۹۹
    بلعم بعور ۲۴
    بوڑے خان ڈاکٹر ۳۱۳ح،۳۲۷
    بھولے خاں عیسائی
    آتھم کی موت کے غم سے مر گیا ۳ح
    پولوس (سینٹ پال )
    اس شخص نے عیسائی مذہب میں بہت فساد ڈالا ۳۲۱
    پیر بخش منشی۔ جالندھر ۳۲۶
    پیر بخش میاں۔لدھیانہ ۳۲۶
    پیر صاحب العَلَم سندھ والے
    آپ کو کشفاً بتایا گیا کہ یہ مسیح موعود صادق ہے ۳۴۴
    تاج الدین بابو ۳۲۶
    تاج محمد خاں منشی ۳۲۶
    توکل شاہ ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    ٹھاکر داس پادری ۳۶،۴۰،۴۴
    ثناء اللہ امرتسری مولوی ۔مباہلہ کا مخاطب
    ۷۰،۳۰۱،۳۰۴ح،۳۰۷ح،۳۰۹ح،۳۱۶ح،۳۱۸ح
    ج۔چ۔ح۔خ
    جابر جعفی (یکے از راویان حدیث گرہن) ۳۳۳،۳۳۴
    جان محمد میاں ۳۲۶
    جلال الدین بخاری شاہ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    جلال الدین منشی ۳۱۳ح،۳۲۵
    جمال الدین خواجہبی اے۔ لاہور ۳۲۷
    جمال الدین مولوی۔ سیدوالہ ۳۲۶
    جمال الدین میاں۔ سیکھواں ۳۱۳ح،۳۲۵
    جیون علی سید ۳۲۸
    چراغ الدین قاضی ۳۲۷
    چراغ علی نمبردار شیخ ۳۲۶
    حامد شاہ سید ۳۲۵
    حبیب الرحمن منشی ۳۲۸
    حبیب اللہ مرحوم مولوی ۳۲۸


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 379
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 379
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/379/mode/1up


    حبیب شاہ مولوی ۳۲۶
    حرمت علی کراروی شیخ ۳۲۸
    حسام الدین میاں عیسائی ایڈیٹر رسالہ کشف الحقائق
    ۴،۱۱،۱۶،۱۷،۲۲،۳۳،۴۰،۴۳،۴۴
    حسن علی مولوی ۳۲۶
    حسین شاہ مودودی سید ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    حسین عرب یمانی شیخ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    حسینی خاں ۳۲۸
    حشمت مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    حفیظ الدین مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    حمیدالدین منشی ۳۲۶
    حیدر شاہ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    خادم حسین میاں ۳۲۸
    خان ملک مولوی ۳۲۷
    خدا بخش پیر جی ۔ ڈیرہ دون ۳۲۶
    خدا بخش شیخ۔ الہ آباد ۳۲۸
    خدا بخش مرزا ۳۱۵ح،۳۲۵
    جماعت الہٰ آباد کو آپ کے قیام سے بہت مدد ملی ۳۴۰ح
    خدا بخش میاں۔ بٹالہ ۳۲۸
    خصیلت علی شاہ سید ۳۲۷
    خواجہ علی قاضی ۳۲۶
    خیرالدین میاں ۳۱۳ح،۳۲۵
    د۔ڈ۔ر۔ز
    داؤدعلیہ السلام ۱۲،۳۷
    دلدار علی سید۔ بلہور کانپور ۳۲۸
    دلدار علی مولوی۔ الور۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    دلیپ سنگھ (فرزند رنجیت سنگھ) ۲۹۷
    دوست محمد مولوی ۳۲۸
    دیانند پنڈت بانی آریہ سماج ۲۹۷
    ڈریپر
    اس نے اپنی کتاب میں لکھا ہے کہ عیسائیوں کے عقیدہ
    تثلیث کا بانی اتھاناسی اسالیگزنڈرآئن تھا ۳۹ح
    رجب دین تاجر خلیفہ ۳۲۶
    رجب علی پنشنر ۳۲۸
    رحمن شاہ ۳۲۶
    رحمت اللہ تاجر شیخ ۳۲۶
    آپ کی غیر معمولی مالی اعانت کا ذکر ۳۱۲ح،۳۱۳ح
    رحمت اللہ مولوی۔ میر پور جموں۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    رحیم اللہ مولوی ۳۲۶
    رحیم بخش منشی میونسپل کمشنر لدھیانہ ۳۲۶
    رحیم بخش میاں۔ امرتسر ۳۲۷
    رستم علی منشی کورٹ انسپکٹر ۳۲۷،۳۱۳ح
    رسل بابا (دیکھئے غلام رسول رسل بابا)
    رشید احمد گنگوہی مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۶۹،۲۵۲
    رشیدالدین ڈاکٹر خلیفہ ۳۱۳ح،۳۲۷
    رضی الدین قاضی ۳۲۸
    رمضان علی سید ۳۲۸


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 380
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 380
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/380/mode/1up


    روڑا صاحب منشی ۳۱۳ح،۳۲۵
    روشن دین منشی ۳۲۷
    زین الدین محمد ابراہیم منشی ۳۱۵ح،۳۲۸،۳۴۲
    زین العابدین قاضی ۳۲۶
    س۔ش
    سراج الحق صاحبزادہ پیر ۳۱۳ح،۳۴۴
    سراج الدین قاضی۔ قاضی کوٹ ۳۲۷
    سراج الدین منشی۔ ترمل کہیڑی ۳۲۶
    سردار محمد مولوی ۳۲۸
    سرفراز خان منشی ۳۲۸
    سعداللہ خان ۳۲۸
    سعداللہ نو مسلم (لدھیانوی)۔مباہلہ کا مخاطب ۵۹ح،۷۰
    اس نے حضورؑ کو گالیوں سے بھری ہوئی ایک نظم بھیجی ۵۸ح
    الہام میں ہامان سے مراد سعداللہ ہے ۳۴۰
    سعیدالدین رامپوری مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    سلام الدین شاہ مولوی ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    سلطان الدین جے پوری مولوی ۲۵۱
    سطان محمد مرزا(داما د مرزا احمد بیگ) ۳۲ح،۳۳۷
    اس کے معیاد مقررہ میں نہ مرنے پر اعتراض کا
    تفصیلی جواب ۲۱۰،۲۲۵
    سلطان محمد میاں۔ گوجرانوالہ ۳۲۷
    سطان محمود مولوی۔ میلا پور مدراس ۳۲۶
    سلطان محمود مولوی قاضی ۔اعوان والہ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    سلیمان تونسوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    سلیمان حافظ۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    سوامی شوگن چندر(جلسہ اعظم مذاہب کے مجوز) ۳۰۰ ح ح
    سیوطی امام(مصنف تفسیر در منثور) ۳۰ح
    شادی خاں میاں ۳۲۶
    شاہ دین منشی ۳۲۷
    شدّاد ۸۹
    شرف الدین چوہدری ۳۲۷
    شریف احمد مرزا(فرزند حضرت مسیح موعود ؑ ) ۲۹۹،۳۱۱ح
    شہاب الدین۔ تھہ غلام نبی ۳۲۸
    شہاب الدین شیخ۔ لدھیانہ ۳۲۶
    شہاب الدین غزنوی مولوی ۳۲۶
    شہامت خاں میاں۔ نادون، کانگڑہ ۳۲۸
    شیر محمد خاں ۳۲۶
    شیر محمد شیخ افسر نہر۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    شیر محمدمولوی۔ ہوہن، شاہ پور ۳۲۷
    ص،ض،ط،ظ
    صابر علی حافظ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    صاحب دین ۳۲۸
    صادق حسین مختار منشی ۳۲۷
    صادق علی شاہ ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    صالح محمد حاجی اللہ رکھا سیٹھ ۳۲۶،۳۴۴


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 381
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 381
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/381/mode/1up

    صدرالدین مولوی ۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    صفدر حسین مولوی ۳۲۷
    صفدر علی بھنڈارہ منشی ۳۳،۴۰ح،۴۴
    صوفی جان مراد آبادی سید ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    ضیاء الدین قاضی ۳۲۵،۳۲۷
    طامس ہاول ۴۰ح،۴۴
    ظفر احمد منشی ۔کپورتھلہ ۳۲۵
    ظہور الحسین۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    ظہور علی سید مولوی ۳۱۳ح
    ع۔غ
    عابد حسین مولوی حاجی ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عالم دین میاں ۳۲۸
    عالم شاہ ۳۲۷
    عباس خاں میاں ۳۲۷
    عبدالاحد قاضی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    عبدالجبار غزنوی مولوی ۔مباہلہ کا مخاطب
    ۶۹،۳۱۹ح،۳۲۹،۳۴۳
    عبدالحق دہلوی مولوی مؤلف تفسیر حقانی ۔مباہلہ کا مخاطب
    ۶۹،۲۵۱
    عبدالحق غزنوی مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۶۴،۷۰،۳۰۵ح،
    ۳۰۹ح،۳۱۰ح،۳۱۱ح،۳۱۵ح،۳۱۹ح،۳۲۹،۳۳۳،۳۳۹،۳۴۳،۳۴۴
    اس کے ہاں بیٹا ہونے کا دعویٰ باطل نکلا ۳۱۷ح
    رئیس الدّجّالین ۔کسوف وخسوف کی پیشگوئی کے پورا
    ہونے کا منکر ۳۳۰
    اس کا وسوسہ پیش کرنا کہ گرہن کے بعد مہدی کا ظہورہو ۳۳۴
    اس کا اپنے مباہلہ کا مزعومہ اثر ۳۴۲
    عبدالحق منشی۔کراچی ۳۲۶
    عبدالحق مولوی ۳۲۸
    عبدالحکیم خاں ڈاکٹر ۳۲۷
    عبدالحکیم مولوی ۳۲۸
    عبدالحمید حاجی ایوب سیٹھ ۳۲۶
    عبدالحمید دہلوی مولوی مہتمم مطبع انصاری
    مباہلہ کا مخاطب ۶۹
    عبدالحمید مولوی ۳۱۳ح
    عبدالمجید شہزادہ۔لدھیانہ ۳۲۶
    عبدالخالق میاں ۳۲۵
    عبدالرحمن امیر کابل ۹۶،۹۷
    عبدالرحمن پٹواری ۳۲۸
    عبدالرحمن حاجی ۳۲۶
    عبدالرحمن سیٹھ۔ مدراس ۳۲۵
    عبدالرحمن کلرک منشی ۔ لاہور ۳۲۷
    عبدالرحمن منشی۔کپورتھلہ ۳۲۵
    عبدالرحمن مولوی۔کھیوال،جہلم ۳۲۷
    عبدالرحمن نو مسلم شیخ بھیرہ ۳۲۸
    عبدالرحمن نو مسلم شیخ قادیان ۳۲۶
    عبدالرحیم قاضی ۳۲۷
    عبدالرحیم میاں ۲۱۴ح،۲۹۸


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 382
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 382
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/382/mode/1up


    عبدالرحیم نو مسلم شیخ ۳۲۵
    عبدالرزاق ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عبدالشکور ڈاکٹر ۳۲۸
    عبدالسبحان میاں ۳۲۸
    عبدالصمد حکیم مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    عبدالصمد میاںآف سنور ۳۲۷
    عبدالصمد میاں نارووال ۳۲۷
    عبدالعزیز پٹواری میاں ۳۲۵
    باوجودقلت معاش کے ایک سو روپیہ مالی خدمت کرنا ۳۱۳ح
    عبدالعزیز عرف عزیزالدین ۳۲۸
    عبدالعزیز لدھیانوی مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۶۹
    عبدالعزیز مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    عبدالعزیز میاں آف دہلی ۳۲۶
    عبدالعزیز میاں آف سیالکوٹ ۳۲۸
    عبدالعزیز میاں ۔نو مسلم ۳۲۶
    عبدالعلی میاں ۳۲۷
    عبدالغفار مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    عبدالغنی مولوی ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عبدالقادر پیارم پیٹی مولوی ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    عبدالقادر خان مولوی ۳۲۶
    عبدالقادر مولوی۔ لدھیانہ ۳۲۶
    عبدالقدوس گنگوہی شیخ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عبدالکریم سیالکوٹی مولوی ۳۲۵
    حضور ؑ کامضمون پڑھنے میں وہ بلاغت دکھلائی کہ گویا
    روح القدس مدد کر رہا تھا ۳۱۶ح
    عبدالکریم مرحوم۔ چمارو ۳۲۸
    عبدالکریم مستری ۳۲۸
    عبداللطیف شاہ خلف حاجی نجم الدین شاہ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عبداللطیف مرحوم خلیفہ ۳۴۴
    عبداللہ آتھم مسٹر
    ۱۸،۴۳،۶۱،۶۲،۱۸۹،۱۹۳،۱۹۴،۱۹۵،۱۹۶،۲۰۳،۲۰۵،
    ۲۹۷،۳۰۵ح،۳۰۶ح،۳۰۸ح،۳۱۲ح،۳۴۲
    آتھم خدااور خلقت کے نزدیک ملزم ہے ۱۷
    آتھم کے کلام میں اختلاف وتناقض ۲۰
    دوستوں کوآتھم کی موت کا غم ہوا۔ بھولے خاں کا غم سے مرنا ۳ح
    اشتہارات میں آتھم سے متعلقہ امور کا ذکر ۲۰۴
    آتھم ثابت نہ کر سکا کہ انجیلی تعلیم توریت میں موجود ہے ۵
    آتھم کو فرشتے نظر آنا اور اس کا کہنا کہ’’ میں خونی
    فرشتوں سے ڈرتا ہوں‘‘ ۱۸،۱۹
    اس کے داماد حکومت کے بڑے عہدوں پرفائز تھے ۲۹
    آتھم کی فرعون اور بلعم سے مثال ۲۴
    ھویٰ دجال ببٌّ فی عذاب الھاویۃ المھلکۃ
    سے موت آتھم کی تاریخ بحروف ابجد ۱۸۹۶ء ہے ۲۰۴
    مسیح موعودؑ کی پیشگوئی دربارہ آتھم
    آتھم کے قصہ کے متعلق آنحضرتؐ کی پیشگوئی ۲۸۷،۲۸۸
    اس عظیم الشان پیشگوئی کی پندرہ سال پہلے خبر دی گئی ۲۹۲ح
    آتھم کی موت پر دلالت کرنے والی پیشگوئیاں ۱،۲
    اس مبارک پیشگوئی میں خدا نے اپنی صفات جمالی
    اور جلالی دونوں دکھلا دیں ۲۴ح
    آتھم کی پیشگوئی پرایک نامہ نگار کی نکتہ چینی ۲۵ح
    پیشگوئی اپنے دونوں پہلوؤں کی رو سے پوری ہو گئی ۲۹
    پیشگوئی کے بارہ میں متشکک عیسائی کودعوت مباہلہ ۳۳
    آتھم کا قائم مقام قسم کھانے والاعیسائی ایک سال تک
    بچ گیا تو حضورؑ کی پیشگوئی غلط نکلی ۱۵


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 383
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 383
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/383/mode/1up


    آتھم کی پیشگوئی دو پیشگوئیاں ہیں جو وقت پر ظہور
    میں آئیں ۳۰۵ح
    آتھم نے پیشگوئی کی سچائی کو چھپانے کے لئے مکروہ
    افتراؤں سے کام لیا ۱۴
    آتھم کا اقوال و افعال اور مفتریانہ دعاوی سے ثابت کرنا
    کہ پیشگوئی کی عظمت نے اس کے دل پر اثر کیا ۷
    آتھم نے الہامی پیشگوئی کی وجہ سے بہت ہم وغم کیا ۲۳ح
    آتھم کا پیشگوئی کی عظمت سے شدید خوف کا اظہارکرنا ۱۰،۱۴،۱۹
    ۱۸۸،۲۸۷
    آتھم کا اقرار کہ میں اثناء ایام پیشگوئی میں خونی فرشتوں
    سے ڈرتا تھا ۱۷ح،۱۹
    آتھم کا پیشگوئی کے خوف سے رونا ۱۰،۱۷ح
    پیشگوئی سے ڈرنے کا بار ثبوت آتھم پر ہونے کی وجہ ۲۵
    آتھم کے رجوع اور آخر میں اس کی ذلت اور ہلاکت
    کے متعلق الہامات ۲۲ح،۲۳ح
    آتھم کے رجوع کا ثبوت ۷،۱۱،۲۴،۲۵،۱۸۸
    اس کی موت کی پیش خبری عدم رجوع سے مشروط تھی ۱۸۷
    پیشگوئی میں رجوع الی الحق کی شرط تھی جس سے آتھم نے
    فائدہ اٹھایا ۲۸۷
    پیشگوئی میں شرط تھی کہ ا گر ان کے رجوع الی الحق ثابت
    نہ ہو گا تو میعاد کے اندر فوت ہو ں گے ۱۳
    بوجہ ادائے شرط موت کا ٹلنا ۱۴
    آتھم نے حق چھپایا اور قسم نہیں کھائی ۱۷۷،۱۹۴،۲۸۷
    اس نے نالش اورقسم سے پہلو تہی کرکے جتلایا کہ
    رجوع بحق کیا مگر اعلانیہ طور پر ظاہر نہ کیا ۲
    آتھم نے رجوع الی الحق سے سات دفعہ انکار کیا ۳
    پیشگوئی کی مدت گزرنے پر جن خیالات کا اظہار کیا ۱۸۹تا۱۹۲
    آتھم بمطابق پیشگوئی ۲۷ جولائی ۱۸۹۶ء کو بروز دوشنبہ
    فوت ہوگیا ۱۴،۱۵،۲۸ح،۲۸۹،۲۹۲،۳۰۹ح،۳۲۹
    چار دن تک عذاب اٹھا کر دائمی عذاب میں جا پڑا ۳۲،۴۳
    آخری اشتہار کے آنے کے سات ماہ کے اندر مرا ۱۸۷
    اس اعتراض کا جواب کہ آتھم میعاد پیشگوئی میں نہیں مرا
    اور اس کے خوف اور رجوع کا کوئی ثبوت نہیں ۱۸۶
    آتھم کے مسیح موعودؑ پر چارحملوں کے الزامات اور ان
    کا جواب ۸،۹،۱۴،۱۶،۱۷،۱۹،۳۰
    عبداللہ پٹواری سنوری میاں ۳۱۳ح،۳۲۵
    عبداللہ ٹونکی مولوی ۷۹،۲۵۱
    عبداللہ خان میاں ۳۲۶
    عبداللہ دیوا ن چندشیخ ۳۲۷
    عبداللہ عرب شیخ ۳۴۴
    عبداللہ غزنوی مولوی ۲۱۴ح،۲۹۸
    آپ کاکشف کہ ایک نور آسمان سے نازل ہوا اورقادیان
    میں اترا مگر آپ کی اولاد اس سے محروم رہے گی ۳۴۳
    زندگی میں مسیح موعودؑ کودو خط لکھنااور وفات کے بعد
    آپؑ پراپنا مصدق ہونا ظاہر کرنا ۳۴۳
    عبداللہ قاضی۔ کوٹ قاضی ۳۲۸
    عبداللہ قرآنی۔ لاہور ۳۲۸
    عبداللہ مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    عبداللہ مولوی تلونڈی والا ۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عبداللہ مولوی شیخ۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    عبداللہ میاں۔ ٹھٹھہ شیر کا ۳۲۶
    عبدالمجید منشی ۳۲۸
    عبدالمغنی ۳۲۷
    عبدالمنان حافظ۔ وزیر آباد۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    عبدالواحد غزنوی مولوی۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰،۲۱۴ح،۲۹۸
    عبدالوہاب بغدادی ۳۲۸


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 384
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 384
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/384/mode/1up


    عبدالوہاب مولوی کانپور۔مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    عبدالوہاب مولوی لکھنؤفرنگی محل۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    عبدالہادی سید ۳۲۷
    عبیداللہ قاضی ۔مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    عثمان عرب۔طائف ۳۲۸
    عزیزالدین منشی ۳۲۷
    عصمت اللہ حاجی ۳۲۶
    عطاء الٰہی ۳۲۷
    عطاء محمد منشی چنیوٹ ۳۲۸
    عطاء محمد منشی سیالکوٹ ۳۲۷
    عطاء محمد میاں ۳۲۸
    عظیم بیگ میرزا ۳۲۷
    علم الدین میاں ۳۲۷
    علیحضرت رضی اللہ تعالیٰ عنہ
    آپ فاتح خیبرتھے ۳۳۹
    علی حسین۔ کچھوچھا فقیر آباد سجادہ نشین۔مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    علی حمزہ بن علی ملک الطوسی شیخ ۳۲۴
    علی محمد میاں ۳۲۷
    عمادالدین پادری ۳۳،۳۸،۳۶،۴۰ح،۴۴
    عمرو بن ثمر (یکے از راویان حدیث گرہن) ۳۳۳،۳۳۴
    عنایت اللہ مدرس مولوی ۳۲۷
    عیسٰی علیہ السلام (مسیح ابن مریم، یسوع)
    ۴،۵،۶،۱۲،۳۴، ۳۵،۳۷،۴۱،۴۴،۵۰،۶۸،۸۰،۸۳،۸۶،
    ۹۳،۱۳۴،۱۵۰،۱۵۶، ۱۵۹، ۱۷۴، ۲۸۵، ۲۸۸،۳۲۱،۳۲۲،
    ۳۳۸،۳۴۵
    آپ کی پیدائش ناجائز نہیں ۵۷ح
    آپ اور آپ کی ماں شیطان کے مس سے پاک تھے ۵۷
    یہودیوں کا آپ سے استہزاء کرنا اور ملحد نام رکھنا ۳۰۷ح
    آپ کا دوبارہ آنابطور بروزہے نہ بطور حقیقت ۴۸ح،۳۲۱
    عیسیٰؑ نے ایلیا کے نزول کی پیشگوئی کی تاویل کی ۱۲۸
    آنحضرت ؐ کا آپؑ کومعراج کی رات فوت شدہ
    انبیاء میں دیکھنا ۱۳۳
    الوہیت مسیح
    آپ خدا نہیں بلکہ ایک انسان اور نبی تھے ۳۳
    عقلی دلائل سے الوہیت مسیح کی تردید ۴۱
    رجوع مسیح
    آنحضور ؐ کی پیشگوئی میں مسیح کے لئے لفظ رجوع
    استعمال نہیں ہوا ۱۱۱،۱۵۱
    اہل معرفت کے نزدیک رجوع اور نزول میں بہت فرق ہے ۱۱۲
    رفع مسیح
    احادیث مسیح کے رفع آسمانی پر خاموش ہیں ۱۶۸ح
    خدا نے مسیح کا اعلیٰ مقام کی طرف رفع فرمایا ۱۷۱ح
    نزول مسیح(دیکھئے مضامین میں نزول مسیح)
    وفات مسیح(دیکھئے مضامین میں وفات مسیح)
    یسوع مسیح
    حضرت مسیح موعودؑ کی رائے اس انجیلی یسوع کی نسبت ہے
    جس نے خدائی کا دعویٰ کیا۔ نبیوں کو چور اور جھوٹے کہا اور
    جس کا قرآن میں کہیں ذکر نہیں ۱۲،۱۳،۲۰۳،۲۹۳ح
    انجیلی یسوع کی پیشگوئیوں اور دوسرے امور کا ذکر اور
    اس ذکر کی وجہ ۱۲،۳۲،۲۸۸ح تا ۲۹۳ح
    یسوع کا شیطان کے پیچھے جانا اور اسے تین مرتبہ
    شیطانی الہام کا ہونا ۲۹۰ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 385
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 385
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/385/mode/1up


    یسوع کے زمانے میں ایک تالاب تھا جس سے
    نشان ظاہر ہوتے تھے ۲۹۱ح
    یسوع کی نسبت عیسائی تعلیم ۳۳
    اس کا اقرارکہ ’’میں نیک نہیں‘‘ ۳۸
    جھوٹوں پر یسوع کی بدعائیں ۴۱،۴۴
    عین القضاۃ صاحب مولوی۔ لکھنؤ فرنگی محل
    مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    غلام احمد قادیانی علیہ السلام حضرت مرزا
    ۳۳،۴۴،۶۶،۷۲، ۱۷۲،۳۰۱ح،۳۱۶ح،
    ۳۱۸ح،۳۲۳،۳۳۴
    آپ کے تین نام(آدم، مریم، احمد) اور ان سے مراد ۳۳۸
    آئندہ کے لئے مباحثاث سے اعراض کا اعلان ۲۸۲
    آپ کو بے عزتی سے دیکھنا خدا کو بے عزتی سے دیکھنا اور
    آپ کو قبول کرنا خدا کو قبول کرنا ہے ۳۲۰
    آج کے دن میری کشتی کے سوا کوئی کشتی نہیں ۱۱۴
    آپ کسی خونی مسیح اور خونی مہدی کے آنے کے قائل نہیں ۶۸
    آپ پر صوم و صلوٰۃ وغیرہ ارکان اسلام نظر استخفاف
    سے دیکھنے کا افترا ۴۵
    آپ کی سچائی کے سمجھنے کے لئے پانچ قرائن ۴۹
    جو میرے ہاں چالیس دن رہے گا وہ کچھ ضرور مشاہدہ
    کرے گا ۱۸۱
    میرے ہاں ایک سال گزار و تا میں تمہیں خدا کے
    نشان دکھاؤں ۱۸۳
    میرے نفس پر اس کی ذات کی محبت غالب ہوئی ۲۶۷
    مسیح موعود ؑ کا دعویٰ وحی و الہام اور اس پر گزرنے والا عرصہ ۵۰
    حضرت مسیح موعودؑ کوئی بدعت لے کر نہیں آئے ۱۱۵،۱۴۴،۱۶۰
    مسیح موعودؑ کا فتن اور بدعات کے ظہور کے وقت بھیجا جانا ۱۶۳
    مسیح موعودؑ کے نام غلام احمد قادیانی کے عدد (۱۳۰۰) میں
    زمانہ کا عدد مخفی ہونا ۱۷۲
    مسیح موعود کا بڑانشان کسر صلیب ہے ۴۶
    مسیح موعودؑ کو خدا کے علم ازلی میں پوشیدہ امور کی خبر دیا جانا ۷۶
    مسیح موعود ؑ کے ظہور میں آنے والے امور غیبیہ ۲۹۷
    مسیح موعودؑ کے خلاف مولوی نذیر حسین کا دجالانہ فتویٰ
    سراسر افتراء ہے ۳۹
    مسیح موعودؑ کو ملائک سے انکاری کہنا افتراء ہے ۴۵
    مسیح موعود کا وقت ظہور
    آپ کا صدی چہار دہم کے سر پر ظہور ۵۱،۷۵،۲۸۵،۳۲۲
    آپ کے نام کے عدد میں آپ کے وقت ظہور کا عدد ۱۷۲
    آپ کا آنا بروقت ہے ۸۶،۲۵۵،۲۸۵
    فتنوں ، بدعات،سیّئات کے ظہور اور مسلمانوں کی
    کمزوری کے وقت آپ کا ظاہر ہونا ۷۸،۱۲۳
    مسیح موعود کا عیسائیت کے موجزن فتنہ کے زمانہ میں
    پیدا ہونا ۴۶،۱۱۶،۱۱۷،۱۲۱
    حضورؑ کی نسبت وقوع میں آنے والے دو عظیم فتنے ۳۴۱
    آپ کے زمانہ کی علامات ۱۴۲
    اغراض بعثت
    تجدید دین اور اصلاح امت ۷۵،۱۴۴،۳۲۱
    اسلام کو زندہ مذہب ثابت کرنا ۳۴۵
    صلیبی فتنہ کو روشن دلائل سے فرو کرنے پر مامور ہونا ۴۶،۵۱
    صلح کاری سے حق کو پھیلانا ۶۸
    لوگوں کو برے اخلاق اور منافقت سے روکنا اور مخلص توحید
    پرستوں کی راہ دکھانا ۱۴۳
    آپ کے دعاوی
    آپ کے دعویٰ کی بنیاد دو باتوں پر
    ۱۔نصوص قرآنیہ و حدیثیہ۲۔ الہامات الہیہ ۴۸،۶۵
    مجددیت و امامت اور مکاملہ و مخاطبہ الٰہیہ سے مشرف
    ہونے کا دعویٰ ۴۶،۴۹،۷۵،۱۱۳،۱۲۲،۱۴۲،۱۷۲
    بطور روحانی بروز عیسیٰ نام دیے جانے کا دعویٰ ۷۵،۱۴۲،۱۴۴


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 386
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 386
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/386/mode/1up


    مامور من اللہ ہونے کا دعویٰ ۳۲۱
    آپ کا دعویٰ نبوت(نیز دیکھئے مضامین میں نبوت)
    آپؑ کا دعویٰ حقیقی نبوت کا نہیں ۲۷ح
    آپؑ کا نام نبی اللہ مجازی معنوں کے رو سے ہے ۲۸ح
    آپ کے بارہ میں پیشگوئیاں
    آنحضرتؐ کی آپ کی شادی اور اولاد ہونے کی پیشگوئی ۳۳۷ح
    عبداللہ غزنوی کی آپ کے متعلق پیشگوئی ۲۹۳،۳۴۳
    آپ کے متعلق بٹالوی کی پیشگوئی جھوٹی نکلی ۳۴۰ح
    آپ کی پیشگوئیاں
    مسیح موعودؑ کی پیشگوئیاں خدا کے نبیوں کی پیشگوئیوں
    کے نمونہ پر ہیں ۳۳۷
    آتھم کی موت پر دلالت کرنے والی پیشگوئیاں ۱،۲
    لیکھرام پشاوری کی موت کی پیشگوئی ۲۸ح
    آپ کی عیسائیوں کے ایک فتنہ کے متعلق پیشگوئی ۲۸۶
    آپ کے لبوں پر فصاحت و بلاغت جاری ہونے والی پیشگوئی ۲۹۰
    علم قرآن کے دئیے جانے کی پیشگوئی ۲۹۱
    جلسہ مذاہب میں مضمون غالب رہنے کی پیشگوئی ۲۹۹،۳۱۶ح
    بیٹوں کی قبل از پیدائش خبر دیا جانا ۲۹۹
    عبد اللہ آتھم کی موت کی پیشگوئی
    (تفصیل دیکھئے اسماء میں عبد اللہ آتھم)
    احمد بیگ اور اس کے داماد کی موت کی پیشگوئی
    (تفصیل دیکھئے اسماء میں احمد بیگ)
    رجوع خلائق ہونے اور دنیا میں شہرت پانے کی پیشگوئی ۲۸۶
    پنڈت دیانند کی موت ،دلیپ سنگھ کے ارادہ سیر ہندوستان میں
    ناکامی اور مہر علی ہوشیارپوری کی مصیبت کے بارے میں
    پیشگوئیاں ۲۹۷
    ایک صاحب کے سوال کہ آپ کے دعویٰ کی تائید میں
    خدا کی طرف سے کونسے نشان ظاہر ہوئے کا تفصیلی
    جواب اور نشانات کا ذکر ۲۸۵
    خدا کے چھ طور کے نشان آپ کے ساتھ ہونا اور ان
    کی تفصیل ۳۰۴تا۳۱۱
    آپ کی تعلیم
    آپ کی تعلیم دربارہ قرآن کریم ۳۴۵
    آپ کی تعلیم دربارہ اسلام ۳۴۶
    آپ کی کتب (نیزدیکھئے کتابیات)
    آپ کا مدلل کتابیں اور نفع رساں رسالے تالیف کرنا ۸۱،۲۹۰
    حضرت عیسیٰ ؑ کے فوت ہونے اوردوبارہ بطور بروز کے
    آنے کے متعلق آپ کی چند مطبوعہ کتب ۴۸ح
    آپ کی کتب کے نیک روحوں پر اثرات ۳۱۹
    گورنمنٹ کی خیرخواہی کے لئے کتب کی اشاعت ۶۸
    غصہ اور کراہت کی حالت میں کتاب پڑھنے سے منع فرمانا ۱۶۶
    آپ کے اشتہارات (دیکھئے مضامین میں اشتہارات)
    مسیح موعود اور جہاد(نیز دیکھئے مضامین میں جہاد)
    مسیح موعود جنگ نہیں کرے گا بلکہ کلمات حکمیہ، دعاؤں
    اور آسمانی حربہ سے دشمنوں کو زیر کرے گا ۱۳۷،۱۳۸
    مسیح موعود اور مخالفین
    مخالفین کو نصائح ۱۶۶،۱۶۸
    مخالفین کے لئے خیرخواہی کا خواہاں ہونا ۱۵۹
    بعض مخالف مولویوں کا آپ کے خلاف گورنمنٹ کو آپ
    کے بدخواہ اور باغی ہونے کی شکایت کرنا اور آپ کا جواب ۶۸
    لفظ توفی کے معنوں کے ضمن میں مخالفین کے لئے دو لعنتیں ۱۵۵
    آپ کی استجابت دعا
    قبولیت دعا کا الہام اور اس کے مطابق کثرت سے
    دعاؤں کا قبول ہونا ۱۸۱
    مکذبین کو قبولیت دعا کے مقابلہ کا چیلنج ۳۰۳ح
    آپ پر نعماء الٰہیہ
    آپ کا منعم علیہم میں سے ہونا اور جسمانی و روحانی
    نعماء و احسانات الٰہیہ کا ذکر ۵۰،۷۵،۷۶،۱۸۱


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 387
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 387
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/387/mode/1up


    آپ کی مبشر شادی اور اولاد
    مسیح موعودکی شادی اور مبشر اولاد ہونے کی آنحضرتؐ
    کی پیشگوئی ۳۳۷ح
    الہام کے مطابق آپ کے بیٹے شریف احمد کا پیدا ہونا ۳۱۱ح
    آپ کو بیٹوں کے بارہ میں اللہ کی طرف سے خوشخبری کے بعد خوشخبری دیا جانا ۱۸۲،۱۸۳،۲۹۹،۳۴۲
    علمی اور روحانی مقابلہ کا چیلنج
    علماء کو معارف قرآنیہ بیان کرنے میں مقابلہ کا چیلنج ۱۸۳
    علماء کوعربی زبان کی انشا پردازی میں مقابلہ کا چیلنج ۱۸۴،۱۷۸
    زمانے کی اصلاح، عیسائی اور دوسرے بت پرستوں کے
    رد میں دلائل پر مشتمل کتاب لکھنے کا چیلنج ۱۸۴
    مکذبین کو قبولیت دعا ، امورغیبیہ پر اطلاع پانے اور
    قرآن کے علوم حکمیہ کھولے جانے میں مقابلہ کا چیلنج ۳۰۳ح
    مخالفین کو دعوت مباہلہ(دیکھئے مضامین زیرعنوان مباہلہ)
    معارف قرآنیہ اور علم لدنی
    علم قرآن دیا جانے کی پیشگوئی اور علوم و معارف قرآنیہ اور
    حقائق کا دیا جانا ۴۹،۷۵،۷۷،۲۶۶،۳۱۱ح
    خدا نے علم قرآن اور علم زبان اعجاز کے طور پر بخشا ۳۱۲
    علم کلام کے ماہر ین میں فصیح بنایا جانے اور نظم و نثر میں
    فوقیت رکھنے کا دعویٰ ۲۳۵
    میرا علم خدائے رحمان کی طرف سے ہے ۲۶۶
    مسیح موعود اور عربی زبان
    عربی زبان کا علم دیئے جانے کا دعویٰ ۱۵۶
    عربی زبان میں کمال خدا کا واضح نشان ہے اور عربی کے
    چالیس ہزار مادہ سکھایا جانا ۲۳۴
    آپ نے عربی میں کمال کا مقام حبّ رسول اور
    حبّ قرآن سے پایا ۲۶۶
    عربی دانی کی عزت اس راقم کیلئے مسلم ہے ۳۱۰
    علماء کوعربی زبان کی انشا پردازی میں مقابلہ کا چیلنج ۱۸۴،۱۷۸
    مسیح موعودؑ کے عربی شعر و قصائد
    اَطِعْ رَبَّکَ الجَبَّار اَھْل الاَوامِرٖ ۱۳۶،۱۳۷
    لمارأی النوکی خلاصۃ انصری ۱۵۷،۱۵۸
    الا یا ایّھَا الحُرّالکریم ۱۶۶
    احاط الناس من طغوی ظلام ۱۷۴
    تذکر موت دجال رذال ۲۰۶تا۲۱۰
    بوَحْشِ البر یُرجٰی الائتلاف ۲۲۹ تا ۲۳۱
    الا ایھا الا بّار مثل العقارب ۲۳۷
    الا لا تعبنی کالسّفیہ المشارز ۲۴۰
    علمی من الرحمن ذی الٰالاء ۶ ۲۶تا ۲۸۲
    آپ کا عربی مکتوب
    عربی مکتوب،اس کے مخاطب اور اس کے لکھنے کی غرض ۷۳
    اسے عربی میں لکھنا اور فارسی میں ترجمہ کرنا القاء فی الروع
    کے نتیجے میں ہے ۷۴
    آپ کا عشق رسول
    آنحضرت ؐ سے محبت و اخلاص کا ذکر اور اس محبت کے
    نتیجہ میں الہام و القاء سے تائید ہونا ۲۸۰،۲۸۱
    آپ کے صحابہ
    بعض صحابہ کی مالی قربانیوں کا ذکر ۳۱۲ح
    مہدی کے پاس مطبوعہ کتاب میں اس کے ۳۱۳ صحابہ
    کے نام ہونے والی حدیث ۳۲۵
    اکثر سجدہ میں روتے اور تہجد میں تضر ع کرتے ہیں وہ
    اسلام کا جگر اور دل ہیں ۳۱۵ح
    تمام اصحاب خصلت صدق و صفا رکھتے ہیں ۳۲۵
    حضورؑ کے ۳۱۳صحابہ کی فہرست اسماء ۳۲۵تا۳۲۸
    پہلے آئینہ کمالات اسلام میں۳۱۳ صحابہ کے نام درج ہیں ۳۲۵


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 388
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 388
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/388/mode/1up


    صالح علماء جو حضرت مسیح موعود ؑ پر ایمان لائے ، ان
    کے اوصاف کریمہ اور ان کے حق میں الہام ۱۴۰،۱۴۱
    آپ کے پیرو
    آپ کا حقیقی پیرو وہی ہے جو ہوا و ہوس اورتمام آرزوؤں
    کو چھوڑ دیتا ہے ۱۴۳
    آتھم کی پیشگوئی کی وجہ سے پیروؤں کے منحرف ہونے کا
    الزام اور اس کا جواب ۱۱،۱۳
    حضرت مسیح موعودؑ کی بیعت کرنے والوں میں صلاحیت
    اورتقویٰ کا ترقی پذیر ہونا ۳۱۵ح
    آپ کے مصدقین
    عبد اللہ غزنوی کا کشف اور بعد وفات ان کا
    حضرت مسیح موعودؑ کی تصدیق کرنا ۳۴۳
    میاں غلام فرید صاحب اور پیر صاحب العلم کو رویا
    میں آنحضرتؐ کا بتانا کہ آپؑ صادق ہیں ۳۴۳،۳۴۴
    صاحبزادہ پیر سراج الحق اور حاجی منشی احمد جان لدھیانوی
    کا مع اہل بیت بیعت میں داخل ہونا ۳۴۴،۳۴۵
    آپ کے مکذبین
    ہر وہ شخص جو بخدا اور صوفی کہلاتا ہے مگر آپ کی طرف رجوع
    کرنے سے کراہت کرتا ہے مکذبین میں داخل ہے ۶۹
    آپ اور فرض تبلیغ
    آپؑ کا زمین و آسمان کو گواہ ٹھہرا کر کہنا کہ میں نے حکم خدا
    پہنچا دیا ۱۴۵،۲۸۲ح،۳۴۷
    تبلیغ کو کمال تک پہنچانے کے لئے اسلامی زبانوں میں
    اسے وسعت دینے کا القاء ۷۵
    مسیح موعود ؑ اورسجادہ نشین
    سجادہ نشینوں کا حضورؑ کوکافر و کاذب ٹھہرا نا ۴۵
    ان سجادہ نشینوں کے نام جنہیں دعوت مباہلہ دی گئی ۷۱،۷۲
    آپ اور گورنمنٹ انگریزی
    حکومت برطانیہ کی تعریف ‘ شکر گزاری، دعاء اور
    آباء اجداد کی خدمات کا ذکر ۲۸۳،۲۸۴
    مسلمانوں کو گورنمنٹ کی سچی خیرخواہی کی تجویز ۶۸
    .....................
    غلام امام مولوی ۳۲۶
    غلام الٰہی مستری ۳۲۸
    غلام جیلانی مولوی ۳۲۷
    غلام حسن رجسٹرار مولوی ۳۲۶
    غلام حسن مرحو م مولوی آف دینا نگر ۳۲۸
    غلام حسین خاں شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    غلا م حسین مولوی۔ لاہور ۳۲۶
    غلام حسین میاں ۔رہتاس ۳۲۷
    غلام دستگیر منشی ۳۲۶
    غلام دستگیرمولوی۔ قصور۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    غلام رسول بابو ۳۲۸
    غلام رسول رسل باباامرتسری مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب
    ۷۰،۲۳۶،۲۳۷،۲۵۲
    غلام رسول مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    غلام علی ڈپٹی مولوی ۳۲۵
    غلام علی شاہ ۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    غلام فریدچشتی میاں چاچڑاں والے ۔ مباہلہ کا مخاطب
    ۷۱،۳۲۰،۳۲۲،۳۴۴
    حضرت مسیح موعودؑ کو تحریر کردہ آپ کے خط کی نقل ۳۲۳
    آپ نے مسیح موعودؑ کے مقام اورمرتبہ سے انکار نہیں کیا ۳۴۳
    غلام محمد۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    غلام محمد ماسٹر ۳۲۸


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 389
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 389
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/389/mode/1up

    غلام محمد میاں۔ طالب علم مچھرالہ ۳۲۷
    غلام محی الدین حافظ ۳۲۸
    غلام محی الدین خان( فرزند ڈاکٹر بوڑے خان ) ۳۲۷
    غلام محی الدین صوفی وکیل انجمن حمایت اسلام۔
    مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    غلام محی الدین میاں۔ سیالکوٹ ۳۲۸
    غلام مرتضیٰ قاضی ۳۲۶
    غلام نبی شیخ۔ راولپنڈی ۳۲۶
    غلام نبی مولوی۔ خوشاب ۳۲۶
    غلام نظام الدین بریلوی سجاد ہ نشین
    مباہلہ کا مخاطب ۷۱،۲۵۲
    ف۔ق
    فتح محمد منشی ۳۲۶
    فتح مسیح پادری ۳۳،۴۰ح،۴۴،۳۰۸ح
    اس کا حضورؑ کو گندہ اوربدزبانی سے بھراخط لکھنا ۲۸۷
    خط میں آنحضرتؐ کو گالیاں دینا ۲۹۲
    اسے خطرناک پادریانہ منصب سے علیحدہ کر دیں ۲۹۳
    اسے نوکری سے موقوف کر دینا سراسر احسان ہے ۲۹۴
    فرزند حسین سید ۳۲۸
    فرعون ۲۴،۴۰،۸۹،۹۴،۳۰۷ح،۳۴۰
    ایمان کے وعدہ پر خد ااس سے عذاب کو ٹالتا رہا ۸
    فضل احمد حافظ ۳۲۶ فضل الدین قاضی۔ قاضی کوٹ ۳۲۷ فضل الدین میاں۔ قاضی کوٹ ۳۲۷ فضل الرحمن مفتی ۳۲۸
    فضل الٰہی حکیم ۔ لاہور ۳۲۷
    فضل الٰہی شیخ ۔ فیض اللہ چک ۳۲۶
    فضل حق مدرس مولوی ۳۲۸
    فضل حسین شیخ مولوی ۳۲۷
    فضل دین حافظ مولوی آف خوشاب ۳۲۸
    فضل دین مولوی حافظ آف کھاریاں ۳۲۵
    فضل دین بھیروی مولوی حاجی حافظ حکیم ۳۱۳ح،۳۲۵
    فضل شاہ سید ۳۲۸
    فضل کریم نیازی مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    فقیر اللہ مولوی مدرس مدرسہ نصرت الاسلام ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    فنڈل پادری۔ مصنف میزان الحق ۵
    فیاض علی منشی ۳۲۵
    فیض احمد مولوی آف ڈوگہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    فیض احمد مولوی آف لنگیاں والی ۳۲۶
    قادر بخش ماسٹر ۳۲۷
    قادر بخش مولوی شیخ ۳۲۸
    قادر علی منشی ۳۲۶
    قطب الدین خان مس گر ۳۲۵
    قطب الدین مستری ۳۲۸
    قطب الدین مولوی۔ بدوملہی ۳۲۵
    قطب الدین میاں۔ کوٹلہ فقیر، جہلم ۳۲۷
    قطب علی شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    قمرالدین منشی ۳۲۶


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 390
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 390
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/390/mode/1up

    قیصر روم (نیزدیکھئے ہرقل اور کانسٹنٹائن فرسٹ)
    اس کا مشرک اور موحد عیسائی فرقوں کے درمیان مباحثہ
    کرانا۔ موحد فرقہ کو ڈگری دینا اور ان کا مذہب قبول کرنا ۳۹ح،۳۲۲
    ک ۔گ
    کانسٹنٹائن فرسٹ
    اس نے موحد اور تین اقنوم کے قائل عیسائیوں کا باہم
    مباحثہ کرایا اور فرقہ موحدین کو ڈگری دی ۳۹
    کرم داد میاں ۳۲۷
    کرم دین مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    کرم الٰہی شیخ ۳۲۷
    کرم الٰہی کمپازیٹر ۳۲۸
    کرم الٰہی میاں آف لاہور ۳۲۷
    کرم الٰہی میاں آف لدھیانہ ۳۲۶
    کریم الدین میاں ۳۲۶
    کریم الدین میاں سارجنٹ پولیس ۳۲۸
    کریم اللہ مولوی ۳۲۷
    کریم بخش ۲۹۳
    کریم بخش مرحوم میاں ۳۲۸
    کشلّیا ۴۱
    کلیم اللہ مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    کمال الدین خواجہ ۳۱۵ح،۳۲۶
    گلاب دین منشی ۳۲۵
    گلاب شیخ ۔ الہ آباد ۳۲۸
    گل حسن شاہ مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    گوہر علی منشی ۳۲۵
    ل۔م
    لفافت حسین شاہ ۔ سجادہ نشین لوادا۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    لیکھرام پشاوری پنڈت ۲۸ح،۶۲
    مارٹن کلارک ڈاکٹر ۲۹،۳۳،۳۶،۴۰ح،۴۴
    مالک امام
    آپ وفات مسیح کے قائل تھے ۴۸،۸۶،۱۳۲
    مبارک علی امام مولوی ۳۱۳ح،۳۲۵
    حضرت محمد مصطفی خاتم النبیین ﷺ
    ۲۷ح،۲۸ح،۳۲ح،۳۸،۳۹ح،۴۴،۴۵،۴۶،۴۸،۴۹،
    ۵۹ح،۶۹،۱۱۱،۱۳۱،۱۳۲،۱۳۳،۱۳۴،۱۴۳،۱۵۰،۱۵۹،۱۶۸، ۲۲۸،۲۵۸ح، ۲۶۵،۲۶۶،۲۸۴،۲۹۲ح،۳۲۹،۳۳۴
    آپ کا نام محمد رکھا جانے میں اشارہ ۲۹۶
    لوگوں کا آپ کو وطن سے نکالنا ۳۰۷
    عالم رؤیا میں آپؐ کی زیارت ۳۴۳،۳۴۴
    آپ ؐکے اصحاب نے چشم ۂ نبوت سے علم حاصل کیا ۱۳۰
    حضرت محمدؐ، آپ کی آل و اصحاب اور اللہ کے صالح
    بندوں پر درود و سلام ۷۳
    آپ کا مقام
    آپؐ خیر الرسل اور خیرالوریٰ ہیں ۲۲۳
    آپ خدا کے سچے پیغمبر ،رسول اور خاتم الانبیاء ہیں ۲۷ح،۳۳
    آپ سے سچی محبت و تابعداری رکھنا انسان کو
    صاحبِ کرامات بنا دیتا ہے ۳۴۵
    آپ کا بے مثال صبر
    آپ نے کفار کے ظلم پر لمبا عرصہ صبر کیا اور وہ صبر دکھایا
    جس کی نظیر کسی رسول سے نہیں ملتی ۱۳۹


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 391
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 391
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/391/mode/1up

    آپ کے معجزات
    آپؐ کا بارش برسانے کا معجزہ ۲۸۵
    آپؐ کے وقت میں معجزہ شق القمر کی حکمت ۲۹۵
    آپ اور جہاد
    آنحضرت ؐ کے قتال پر عیسائیوں کے اعتراض کاجواب
    اور موسیٰ،یشوع اور داؤدؑ کے قتال کا ذکر ۳۶
    بغیر اتمام حجت جنگ کرنا بری بات ہے آنحضرت ؐنے
    مصائب پر تیرہ سال صبر کیا ۱۳۸،۱۳۹
    آپ کی پیشگوئیاں
    آخری زمانہ میں پوری ہونے والی پیشگوئیاں ۱۴۲
    حضورؐ کی پیشگوئی کہ عیسائیوں اور اہل اسلام میں
    آخری زمانہ میں ایک جھگڑا ہو گا پوری ہو گئی ۲۸۸
    مہدی کے پاس کتاب میں ۳۱۳ صحابہ کا نام درج ہو گا
    والی پیشگوئی آج پوری ہو گئی ۳۲۴
    پیشگوئی میں لفظ کدعہ قادیان کے نام کو بتا رہا ہے ۳۲۹
    آنحضرت ؐ کی مسیح موعودؑ کے شادی کرنے اور
    صاحب اولاد ہونے کی پیشگوئی ۳۳۷
    پیشگوئی کسوف و خسوف کا پورا ہونا ۴۹،۱۴۲،۱۷۷،۲۹۳
    مسیح موعود کاکسر صلیب اور قتل خنزیر پر مامور ہونا ۴۶،۴۷
    ........................
    محمد آفندی سید ۳۲۸
    محمد ابراہیم آرہ مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد ابراہیم ویلوری مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد احسن امروہوی مولوی ۳۱۳ح، ۳۲۶
    محمد احسن مولوی سید ۳۲۵
    محمد اسحاق اجر اوری مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد اسحق میاں ۳۲۷
    محمد اسمٰعیل دہلوی سید ۳۲۶
    محمد اسمعٰیل غلام کبریا ۳۲۶
    محمد اسماعیل خان گوڑیانی ڈاکٹر ۳۲۶
    محمد اسمٰعیل نقشہ نویس ۳۲۸
    محمد افضل کملہ مولوی ۳۲۷
    محمدافضل منشی۔ لاہور حال ممباسہ ۳۲۶
    محمد افضل میاں۔ راجوال کھاریاں۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    محمد اکبرمیاں ۳۲۶
    محمد امیر خاں حاجی ۳۲۶
    محمد امین چکوتری۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    محمد امین چکوڑی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    محمد امین کتاب فروش ۳۲۸
    محمدامین مولوی۔ بنگلور۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد انوار حسین خان رئیس شاہ آباد ۳۱۳ح،۳۲۶
    محمد باقر امام رحمۃ اللہ علیہ ۳۳۰
    محمد بخش بابو ہیڈ کلرک۔ انبالہ ۳۲۶
    محمد بخش حافظ۔ کوٹ قاضی ۳۲۷
    محمدبشیر بھوپالی مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد بن اسماعیل بخاری امام ۴۸،۱۳۲
    محمدتفضل حسین مولوی سید ۳۲۷
    محمد جان میاں ۳۲۶
    محمد جو۔ امرتسر ۳۲۷
    محمد حسن امروہی ۲۵۱،۲۵۲


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 392
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 392
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/392/mode/1up

    محمدحسین رئیس لدھیانہ مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۶۹
    محمد حسن مولوی مؤلف تفسیر امروہہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد حسین بٹالوی شیخ ایڈیٹر رسالہ اشاعۃ السنہ ۔ مباہلہ کا مخاطب
    ۴۵،۵۹،۶۸،۶۹،۱۹۸،۲۴۱،۲۹۸،۳۰۱،۳۰۳،
    ۳۰۹ح،۳۱۰ح،۳۱۸ح
    اس کی کج رو اور دروغ گو حالت کا ذکر ۲۴۱ تا۲۴۳
    اسے عربی تحریر نویسی ، مباہلہ کا چیلنج او رنصائح ۶۹،۲۴۳تا ۲۵۰، ۳۱۸۳۰۴ح
    جلسہ مذاہب کے روز اس کا اقرار کہ مضمون اسلام کی
    فتح کا موجب ہوا ۳۱۳ح
    الہام میں فرعون سے مراد محمد حسین بٹالوی ہے ۳۴۰
    اس کی مسیح موعود ؑ کو ذلیل کرنے کی شیطانی پیشگوئی ۴۳۰ح
    اس کا فتنہ تکفیر اور حضورؑ کو سترہ برس قبل اس کی خبر ملنا ۴۵،۳۴۱
    باطل پرست اور اعدی الاعدا ہے ۵۹ح
    مسیح موعود کے خلاف گورنمنٹ انگریزی میں مخبری کرنا
    اور آپ کو گورنمنٹ کا بدخواہ قرار دینا ۶۸
    بٹالوی کے اس اعتراض کا جواب کہ آتھم کے مسیح موعودؑ
    پر قتل کے حملوں کے جھوٹے الزام پر آپ نے اس پر
    مقدمہ کیوں نہ کیا ۲۰ح
    اس کے اعتراض کا جواب کہ الہام یردھا الیک
    خلاف محاورہ ہے ۶۰ح
    اس اعتراض کا جواب کہمسیح موعودؑ کی کتب اغلاط سے پُر ہیں ۲۴۱
    بٹالوی کے پوچھنے پر مسیح موعودؑ کا اسے بکر و ثیب
    کاالہام سنانا ۲۹۸
    محمد حسین حکیم ۳۲۸
    محمد حسین آف گوجرانوالہ ۳۲۸
    محمد حسین عطار میاں ۳۲۸
    محمد حسین کوٹلہ والا مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد حسین گدی نشین ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    محمدحسین مراد آبادی شیخ ۳۲۷
    محمدحسین مولوی۔ کپورتھلہ ۳۲۶
    محمد حیات ۳۲۷
    محمد خان میاں ۳۲۵
    محمد دین پٹواری میاں ۳۲۵
    محمد دین حکیم۔ سیالکوٹ ۳۲۸
    محمد دین منشی ۔ سیالکوٹ ۳۲۸
    محمد دین میاں ۔ جموں ۳۲۸
    محمد رحیم اللہ مولوی مدرس مدرسہ اکبر آباد۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمدرحیم الدین ۳۲۸
    محمد رستم علی خاں نواب چشتی مولوی ابو الانوار ۔
    مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد رضوی مولوی سید ۳۲۸
    محمد رمضان پشاوری مولوی حافظ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد سراج الحق جمالی نعمانی صاحبزادہ ۳۲۵
    محمد سعید حافظ ۳۲۸
    محمد سعید حکیم ۳۲۶
    محمد سعید دہلوی ۳۴۲
    محمد سعید شامی ۳۲۶
    محمد شفیع مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد شفیع میاں ۳۲۸
    محمد صادق مفتی ۳۱۳ح،۳۲۶
    محمد صدیق مخدوم مولوی ۳۲۷


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 393
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 393
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/393/mode/1up

    محمد ضیاء الحق سید ۳۲۶
    محمد عباس مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد عبدالرحمن عرف شعبان شیخ ۳۲۶
    محمد عبداللہ خان مولوی ۳۲۷
    محمد عسکری خان سید ۳۲۵
    محمد علی بوپڑی واعظ ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد علی خاں سردار نواب ۳۲۵
    محمدعلی منشی ۳۲۷
    محمد عمر مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    محمد فاروق مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    محمد فضل چنگا مولوی ۔ گوجر خان ۳۲۷
    محمد قاری ۳۲۷
    محمد قاسم۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    محمد کامل شاہ مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    محمد لدھیانوی مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۶۹
    محمد معصوم شاہ ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    محمد مکی شیخ ۳۲۶
    محمد نواز خان تحصیلدار میاں ۳۲۶
    محمد مولوی حافظ ۳۲۸
    محمد میاں ۳۲۷
    محمد یعقوب ۲۱۵ح،۳۴۳
    محمد یوسف حافظ ضلعدار ۲۱۵ح،۳۴۳
    محمد یعقوب خان حافظ مولوی ۳۲۶
    محمدیوسف بیگ میرزا ۳۲۶
    محمد یوسف حاجی اللہ رکھا سیٹھ ۳۲۶
    محمد یوسف قاضی۔ قاضی کوٹ ۳۲۷
    محمد یوسف مولوی ۔ سنور ۳۲۷
    محمود احمدبشیر الدین مرزا (خلیفۃ المسیح الثانیؓ) ۲۹۹
    محمود حسن خان مولوی ۳۲۸
    محمود شاہ سید سیالکوٹ ۳۲۶
    محمود شاہ سید فتح پور گجرات ۳۲۷
    محمود شاہ سجادہ نشین بہار۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    محی الدین خلیفہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    مردان علی سید مولوی ۳۱۳ح
    مریم علیہا السلام ۳۳،۳۴،۴۱
    مریمؑ بدکار عورت نہیں تھی ۵۷ح
    آپؑ کو یہودیوں کی بدظنیوں کا ابتلا پیش آیا ۳۳۸
    مستان شاہ کابلی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    مستعان شاہ مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    مسیح اللہ شاہجہان پوری شیخ ۳۲۶
    مسیلمہ کذّاب ۲۸ح،۳۳۵
    مظہر علی شاہ ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    معراج الدین منشی ۳۲۶
    معین الدین شاہ ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    مقصود علی شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 394
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 394
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/394/mode/1up

    منصب علی سید ڈاکٹر ۳۲۸
    منظور محمد صاحبزادہ ۳۱۴ح، ۳۲۵
    منور شاہ ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    موسیٰ علیہ السلام ۵،۴۲،۹۴،۱۳۲،۱۷۲،۲۴۶،
    ۳۰۷ح،۳۴۵
    آپ کا بے گناہ شیر خوار بچوں اور قوموں کو قتل کروانا
    اور کسی کی توبہ قبول نہ کرنا ۳۶،۳۷
    یسوع نے آپ کا نام ڈاکو اور بٹمار رکھا ۲۹۳ح
    مولا بخش شیخ ڈنگہ گجرات ۳۲۶
    مولا بخش شیخ سیالکوٹ ۳۲۷
    مولا بخش کلرک منشی ۳۲۷
    مہدی حسین سید ۳۲۷
    مہدی عربی بغدادی حاجی ۳۲۶
    مہر دین میاں ۳۲۷
    مہر شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    مہر علی ہوشیارپوری ۲۹۷
    میراں بخش منشی ۳۲۷
    میر محمد قاضی ۳۲۷
    ن
    ناصر شاہ اورسیئر سید ۳۱۳ح،۳۲۸
    ناصر نواب دہلوی سید حضرت ۳۲۵
    نانک باوا
    درحقیقت آپ مسلمان تھے ،کلمہ طیبہ آپ کا ورد تھا، دو مرتبہ
    حج کیا نیز اسلام ، توحید اور نماز روزہ کی تاکید کی ۳۱۴ح
    نبی بخش رفوگر۔میاں ۳۲۵
    نبی بخش شیخ ۳۲۶
    نبی بخش منشی چوہدری ۳۱۳، ۳۲۶
    نثار علی شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    نجاشی شاہ حبشہ ۴۰ح
    نجدی شیخ ۱۹۸
    نجف علی حاجی ۳۲۸
    نجم الدین۔ شادیوال۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    نجم الدین شاہ حاجی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    نجم الدین میاں ۔ بھیرہ ۳۲۸
    نذیر حسین دہلوی مولوی۔ مباہلہ کا مخاطب ۶۹،۲۵۱
    مسیح موعودؑ کے خلاف فتنہ تکفیر کا اصل ذمہ وار ۴۵
    نذیر حسین مولوی ولد امیر علی۔ ابنیٹھ، سہارنپور۔
    مباہلہ کا مخاطب ۷۰
    نصیرالدین لونی منشی ۳۲۷
    نظام الدین چشتی صابری مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    نظام الدین حاجی ملا ۳۲۷
    نظام الدین میاں ۳۲۷
    نمرود ۴۰
    نواب خان ۳۲۶
    نواب دین مدرس ۳۲۸
    نوح علیہ السلام ۴۰
    نور احمد حافظ۔ لدھیانہ ۳۲۷


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 395
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 395
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/395/mode/1up

    نور احمد شیخ سجادہ نشین۔ مہارانوالہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    نور احمد شیخ۔ امرتسر ۳۲۶
    نور احمد شیخ ۔ جالندھر حال ممباسہ ۳۲۸
    نورالدین مولوی حاجی حافظ حکیم ۲۶۴،۳۲۵
    آپ کی غیر معمولی مالی اعانت کا ذکر ۳۱۳ح
    نوردین۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    نوردین خلیفہ جمونی ۳۲۷
    نور محمد حافظ۔ فیض اللہ چک ۳۲۶
    نور محمد مانگٹ مولوی ۳۲۷
    نور محمدمولوی حکیم ۳۲۷ نور محمد میاں ۔ غوث گڈھ ۳۲۸
    نیازاحمد۔ بریلی۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    نیاز احمد مولوی۔ کھاریاں۔ مباہلہ کا مخاطب ۲۸۲ح
    نیاز بیگ میرزا ۳۲۵
    نیاز علی سید ۳۲۸
    و۔ہ۔ی
    واجد علی شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    وارث علی شاہ حاجی۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    وایٹ بریخت پادری ۳۱،۳۲
    وریام میاں حاجی ۳۲۸
    وزیرالدین شاہ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۲
    وزیرالدین مولوی۔ کانگڑہ ۳۲۵
    ولی النبی شاہ مولوی ۔ مباہلہ کا مخاطب ۷۱
    ہامان ۳۴۰
    ہرقل قیصرروم
    یہ موحد تھااور اسے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے خط لکھا تھا۳۹ح
    یسعیاہ علیہ السلام
    آپ کی بادشاہ کے پندرہ دن میں مرنے کی پیشگوئی خدا نے
    بادشاہ کے تضرع سے پندرہ سال کے ساتھ بدل دی ۳۳۶
    یسوع(دیکھئے حضرت عیسیٰ علیہ السلام)
    یعقوب بیگ مرزا ۲۳۵،۳۱۵ح
    یعقوب علیہ السلام ۵۷ح
    یوسف علی نعمانی قاضی ۳۲۵
    یوشع بن نون علیہ السلام ۳۶،۳۷
    یونس علیہ السلام ۷ح،۱۸،۳۱ح،۲۱۸،۲۱۹،۲۲۷،۲۲۸،
    ۲۹۷،۳۳۷،۳۳۸
    آپ کی نینوا کی تباہی کی پیشگوئی اور اس کا ٹل جانا ۳۰ح،۳۳۶
    آپ پر وحی میں شرط نہ ہونے کے باعث ابتلاء آیا ۲۲۵
    آپ کو حوت میں داخل کرنے میں اشارہ ۲۲۶
    یہودا اسکریوطی
    اس کا یسوع سے منحرف ہونا ۱۲


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 396
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 396
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/396/mode/1up


    آ،ا،ب
    آسام ۳۲۶
    ابنیٹھہ۔ سہارنپور ۷۰
    اٹاری ضلع امرتسر ۳۳۹ح
    اٹاوہ ۳۲۷
    اجمیر ۷۰
    احمدآباد ۳۲۸
    اڑیالہ(جہلم) ۳۲۷
    اعظم گڑھ ۷۲
    اعوان والہ۔پنجاب ۷۱
    افغانستان ۶۸
    اکبر آباد ۷۰،۷۲،۳۲۸
    الور ۷۰،۷۲
    الہ آباد ۳۲۵،۳۲۸،۳۴۰ح
    امرتسر ۸،۲۳ح،۲۳۶،۲۸۷،۳۰۷ح،۳۱۵ح،۳۲۵،
    ۳۲۶،۳۲۷،۳۴۲
    امروہہ۔ ضلع مراد آباد ۳۲۵
    امریکہ ۴۲،۳۳۹ح،۳۴۴
    انبالہ ۷۱،۳۲۶
    انڈیا (برٹش) ۶۸
    اوجلہ۔گورداسپور ۳۲۸
    اوچہ ۷۱
    اودے پور میواڑ ۷۱
    اوڑی۔ کشمیر ۳۲۸
    بٹالہ ۷۱،۲۸۷ح،۳۲۶،۳۲۸
    بخارا ۳۲۶
    بدایون ۳۲۸
    بدو ملہی ضلع سیالکوٹ ۳۲۵
    بریلی ۷۱
    برطانیہ ۲۸۳
    بزدار۔لیّہ ،ڈیرہ اسماعیل خان ۳۲۶
    بغداد ۲۲۴
    بکھر ضلع شاہ پور ۳۲۶
    بلانی ۔گجرات ۳۲۵
    بلہور۔ کانپور ۳۲۸
    بمبئی ۴۰ح،۳۱۵ح،۳۲۸،۳۴۲
    بنگلور ۷۰،۷۱
    بہار ۷۲
    بھاگلپور ۳۲۶
    بہالوجی۔ جے پور ۳۲۵
    بہاولپور ۷۱،۳۲۰،۳۴۳


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 397
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 397
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/397/mode/1up

    بھیرہ ۳۲۵،۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    پ، ت، ٹ
    پٹیالہ ۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    پٹنہ ۷۲
    پشاور ۲۸۲ح،۳۲۶
    پلول ۳۲۸
    پنجاب ۳۴،۴۴،۴۵،۷۱،۳۱۰ح،۳۱۷،۳۲۰
    پنڈوری۔جہلم ۳۲۷
    پوڑانوالہ ۲۸۲ح
    پہلوار۔ ضلع پٹنہ ۷۲
    پیارم پیت ۔بنگلور ۷۰
    ترکی ۳۲۸
    تلونڈی ۷۱
    تھہ غلام نبی ۳۲۶،۳۲۸
    ٹھانہ۔ ضلع حصار ۷۲
    ٹھٹھہ شیر کا ۳۲۶
    ج، چ ،ح ،خ
    جالندھر ۳۲۵،۳۲۷
    جلال پور ۷۱
    جمال پور ۳۲۶،۳۲۸
    جموں ۲۸۲ح،۳۱۳ح،۳۲۷،۳۲۸
    جودھپور ۷۱
    جھاوریاں ۳۲۸
    جھجر ۷۲
    جہلم ۳۲۵،۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    جھنگ ۳۲۵،۳۲۸
    جھونسی کہنہ۔ ضلع الہ آباد ۳۲۸
    جے پور ۷۱،۳۲۵
    چاچڑاں ۷۱،۳۲۲،۳۲۳،۳۲۴،۳۴۳،۳۴۴
    چاندپور ۳۲۸
    چاندہ ۳۲۶
    چک جانی۔ جہلم ۳۲۷
    چکراتہ ۳۱۳ح،۳۲۷
    چک سکندر۔ گجرات ۳۱۳ح،۳۲۷
    چک عمر۔ کھاریاں گجرات ۲۸۲ح
    چکوتری ۷۱
    چمارو ۳۲۸
    چنیوٹ ۳۲۸
    حاجی پور ۔ کپورتھلہ ۳۲۸
    حبیب والہ ۳۲۸
    حصار ۷۲،۳۲۵
    حیدر آباد دکن ۷۱،۳۱۳ح،۳۲۵،۳۲۷،۳۲۸
    خان پور۔ ضلع راولپنڈی ۷۰،۳۲۶
    خوشاب ۳۲۶،۳۲۸
    خیبر
    خیبر کو فتح کرنے والے حضرت علیؓ تھے ۳۳۹ح
    خیبر سے مراد مسلمان صورت مولویوں کی قلعہ بندی ہے ۳۳۹ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 398
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 398
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/398/mode/1up

    خیبر سے مراد خراب مذہب جن میں شرک اور باطل
    کی ملونی ہے ۳۰۰ح
    د،ڈ،ر
    دانمباری۔ بنگلور ۷۰
    دمشق ۱۲۹،۱۳۱
    دوجانہ ۔ ضلع رہتک ۷۱
    دھار وار۔ علاقہ بمبئی ۳۲۸
    دہلی ۷۰،۷۱،۷۲،۳۲۶،۳۴۲
    دینا۔ جہلم ۳۲۷
    دینانگر ۷۰،۳۲۸
    دیوا۔ ضلع لکھنؤ ۷۱
    دیوبند ۷۱
    دیوگڈھ ۷۱
    ڈنڈوت۔ جہلم ۳۲۷
    ڈنگہ۔ گجرات ۲۸۲ح،۳۲۶،۳۲۷
    ڈیرہ اسماعیل خاں ۳۲۶
    ڈیرہ دون ۳۲۶
    راجوال۔کھاریاں، گجرات ۲۸۲ح
    رامپور۔ ضلع سہارنپور ۷۰،۷۱،۷۲،۳۲۸
    راولپنڈی ۷۰،۷۱،۳۲۶
    رترچھتڑ ۷۱
    ردولے ۷۱
    روپڑ ۳۲۶
    روم ۳۹ح،۶۸،۲۸۳
    رہتاس۔ جہلم ۳۲۵،۳۲۷
    رہتک ۷۱،۷۲
    ریواڑی ۳۸
    س،ش،ط
    سادھوکے ۲۸۲ح
    سامانہ۔ ریاست پٹیالہ ۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    سانبھر ۷۱
    سرساوہ ۳۲۶
    سرسہ ۳۲۸
    سرہند ۳۲۶
    سندھ ۳۴۴
    سنگھڑ ۷۱
    سنور ۳۲۷
    سہارنپور ۷۰،۷۲،۳۲۶
    سیالکوٹ ۳۱۳ح،۳۱۵ح،۳۲۵،۳۲۶،۳۲۷،
    ۳۲۸،۳۳۹ح
    سیدوالہ ۳۲۶
    سیکھواں (نزد قادیان) ۳۲۵
    شادیوال ۲۸۲ح
    شام ۶۸،۲۸۳
    شاہ آباد ۳۱۳ح، ۳۲۶
    شاہ پور ۳۲۵،۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    شاہجہان پور ۷۲


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 399
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 399
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/399/mode/1up

    شملہ ۳۱،۳۲۷
    طائف شریف ۳۲۸
    ع،غ،ف،ق
    عبدالرحمن موضع ضلع شاہ پور(ادرحمہ) ۳۲۷
    عرب ۵۹ح،۶۰ح،۶۸،۱۹۵،۳۱۷ح
    علیگڑھ ۳۲۷
    غازی پور زمینا ۷۱
    غوث گڈھ ۳۲۷،۳۲۸
    فارس بلاد ۳۱۷ح
    فاضل پور ۷۲
    فتح پور۔ گجرات ۳۲۷
    فتح گڑھ (فتح گڈھ) ۲۸۷ح،۳۰۸ح
    فرخ آباد ۳۲۷
    فقیر آباد ۷۱
    فیروز پور۔ ضلع اکبر آباد ۸،۱۴،۲۱ح،۴۳،۷۲
    فیض اللہ چک ۳۲۶
    قادیان ۳۱،۳۳، ۴۴،۷۲،۳۰۱ح،۳۱۵ح،۳۲۵،۳۲۶،
    ۳۲۸۳۲۷،۳۲۹،۳۴۰ح
    قادیان میں نور اترنے والا مولوی عبد اللہ کا کشف ۳۴۳
    کدعہ سے مراد قادیان ۳۲۹
    حدیث میں امام مہدی کے کدعہ نامی گاؤں سے ظاہر ہونا ۳۲۵
    قاضی کوٹ ۳۱۳،۳۲۵،۳۲۷
    قسطنطنیہ ۳۹
    قصور ۷۰،۳۱۳ح،۳۲۷
    قلعہ سوبھا سنگہ ۳۲۶
    ک،گ،ل،م
    کابل ۹۶،۹۷
    کانپور ۷۰،۳۲۸
    کانگڑہ ۳۲۵،۳۲۷
    کپورتھلہ ۳۱۳ح،۳۱۵ح،۳۲۵،۳۲۶،۳۲۸
    کچھوچھا۔ضلع فقیر آباد ۷۱
    کدعہ(دیکھئے زیر عنوان قادیان)
    کراچی ۳۲۶
    کشمیر ۳۲۸
    کلانور ۳۲۷
    کنکیاں والہ ۷۱
    کوٹ کھلیان ۳۲۷
    کوٹ قاضی ۳۲۷،۳۲۸
    کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۳۲۷
    کھاریاں ۲۸۲ح،۳۲۵،۳۲۷،۳۲۸
    کہوہار۔ گجرات ۳۲۷
    کھیوال۔ جہلم ۳۲۷
    گجرات ۷۱،۳۲۵،۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    گوجرانوالہ ۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    گوجر خاں ۳۲۷
    گورداسپور ۷۰،۷۱،۲۸۷ح،۳۱۳ح،۳۲۵،۳۲۸
    گوڑگانواں ۷۲
    گولڑہ۔ راولپنڈی ۷۱
    گھڑونواں۔ جالندھر ۳۲۷


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 400
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 400
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/400/mode/1up

    لالہ موسیٰ ۳۲۷
    لاہور ۷۰،۷۲،۲۹۹،۳۰۱،۳۱۵ح،۳۱۶،۳۲۶،
    ۳۲۷،۳۲۸،۳۳۹ح
    لدھیانہ ۸،۱۴،۲۱ح،۳۸،۴۳،۶۹،
    ۷۰،۲۹۳،۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    لکھنو ۷۰،۷۱،۷۲
    لندن ۳۲۸
    لنگووال ۲۸۲ح
    لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ ۳۲۶،۳۲۸
    لوادا۔ ضلع پٹنہ ۷۲
    لون میانی ۳۲۸
    لیہ ۳۲۶
    مالیر کوٹلہ ۲۵،۳۴۲
    مانانوالہ ۳۲۷
    مچھرالہ ۳۲۷
    مچہیانہ ۲۸۲ح
    مدراس ۲۸۲ح،۳۱۲ح،۳۲۵،۳۲۶،۳۴۴
    مراد آباد ۷۰،۳۲۵
    مصر ۶۸
    مظفر گڑھ ۳۲۶
    مکہ مکرمہ
    اللہ تعالیٰ نے مکہ مکرمہ کو ام القری بنایا ہے ۲۵۸ح
    ممباسہ ۳۲۶،۳۲۷،۳۲۸
    منارہ ۳۲۸
    منی پور۔ آسام ۳۲۶
    موکل ۳۲۷
    موہرونڈا ۳۲۸
    مہارنوالہ ۷۱
    میر پور ۲۸۲ح
    میرٹھ ۲۵ح،۷۰
    میلاپور۔مدراس ۳۲۶
    ن،و ،ہ،ی
    نادون ۔ کانگڑہ ۳۲۷،۳۲۸
    نارووال ۳۲۷
    ناسنگ ۳۲۸
    ناگپور ۳۲۶
    نقشبند ۷۱
    نینوہ
    یونس علیہ السلام کی نینوہ کی بربادی کی پیشگوئی ۳۰ح
    وزیر آباد ۷۰،۳۲۶
    ہردوئی۔ ضلع لکھنؤ ۷۲،۳۲۶
    ہندوستان ۳۴،۴۴،۴۵،۷۳،۲۸۶،۲۹۷،۳۱۰ح،۳۱۵ح
    ۳۱۷ح،۳۴۴
    ہوشیارپور ۲۱۲،۲۱۴ح،۲۹۷،۲۹۸
    ہوہن۔ شاہ پور ۳۲۷
    یورپ ۴۲،۳۳۹ح
    یورپ میں زہر کے ذریعہ خودکشی ۲۹۱ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 401
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 401
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/401/mode/1up

    آ،ا،ب،ت
    آبزرور (اخبار ) ۳۱۶ح،۳۳۹ح
    آئینہ کمالات اسلام (تصنیف حضرت مسیح موعودؑ ) ۴۸ح،۳۲۵
    اتمام الحجۃ (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۴۸ح
    ازالہ اوہام (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۴۸ح
    اشاعۃ السنہ (رسالہ محمد حسین بٹالوی) ۲۰ح،۶۹
    انجام آتھم (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)
    ۲۸۵،۲۸۸ح،۳۱۷ح،۳۱۸ح
    آتھم کی پیشگوئی اور اس سے متعلقہ تحریریں ۱تا۳۳
    رسالہ خدائی فیصلہ۔ عیسائیوں کے عقیدہ تثلیث پر جرح
    اور ان کو دعوت مباہلہ ۳۴
    رسالہ دعوت قوم۔ علماء و صوفیاء کو دعوت مباہلہ ۴۵
    مکتوب عربی بنام علماء و مشائخ ممالک اسلامیہ ۷۳
    ضمیمہ انجام آتھم۔ ایک شخص کے سوال کا جواب ۲۸۵
    انجیل ۴،۱۶،۵۷ح،۶۳ح،۶۴
    پہاڑی تعلیم انجیل کا مغز کہلاتی ہے ۲۹۰ح
    انجیل متی ۳۵،۴۴،۲۸۹ح
    انجیل یوحنا ۳۵
    انوار الاسلام (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)
    ۱،۲،۷ح،۱۴،۱۸،۲۲ح،۲۳ح،۲۸۸ح،۲۹۹،۳۱۱ح
    بائیبل ۳۰ح،۳۱ح،۵۷ح،۳۳۶
    بخاری صحیح۔جامع ۳۹ح،۴۷،۳۲۲
    کتاب اللہ کے بعد تمام کتب میں صحیح کتاب ۱۳۷
    براہین احمد یہ (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)
    ۲۸۶،۲۸۸ح،۲۹۰،۲۹۱،۳۰۵ح،۳۰۹ح،۳۲۹،
    ۳۳۸،۳۳۹،۳۴۱
    پایونیر (اخبار )الہ آباد ۳۳۲
    پیدائش(بائیبل) ۳۵
    تحفہ بغداد(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۴۸ح
    تفسیر حقانی (از مولوی عبد الحق دہلوی) ۶۹
    تفسیر کبیر (از امام رازی) ۳۰ح
    توریت ۵،۶،۸،۲۹ح،۳۵،۳۷،۶۳ح،۲۸۹ح،۲۹۰ح
    توضیح مرام (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۴۸ح
    ج،ح،د،ر
    جنگ مقدس(مباحثہ مابین مسیح موعود ؑ و عبد اللہ آتھم) ۴
    مباحثہ سے متعلق رسالہ کشف الحقائق کے اعتراضات
    اور ان کے جوابات ۴تا۱۷
    جواہر الاسرار (از شیخ علی حمزہ الطوسی) ۳۲۴
    حمامۃ البشریٰ(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۴۸ح
    دارقطنی ۲۹۳،۳۳۰،۳۳۳
    درّ منثور تفسیر (از امام سیوطی) ۳۰ح،۳۱ح
    رگوید ۱۲۳ح


    Ruhani Khazain Volume 11. Page: 402
    روحانی خزائن ۔ کمپیوٹرائزڈ: جلد ۱۱- انڈیکس: صفحہ 402
    http://www.alislam.org/library/brow...n_Computerised/?l=Urdu&p=11#page/402/mode/1up

    س،ش،ض،ط
    سبز اشتہار(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۹۹
    ست بچن (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۳۵
    یہ کتاب سکھ صاحبان کیلئے ایک لطیف دعوت ہے اور اس میں
    باوانانک کا مسلمان ہونا ثابت کیا گیا ہے ۳۱۴ح
    سر الخلافہ (تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۴۸ح
    سول اینڈ ملٹری گزٹ (اخبار) ۱۷،۳۳۲،۳۳۹ح
    مسیح موعودؑ کا مضمون کی نسبت اخبارکے بیان کا ترجمہ ۳۱۶ح
    اس کے حضورؑ پر الزام اور اس کا جواب ۲۸۳‘۲۸۴
    شحنہ ہند (اخبار) ۲۵ح،۷۰
    شہادۃ القرآن(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۸ح
    ضیاء الحق(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام)
    ۲،۱۴،۱۸،۲۸۸ح،۲۹۹،۳۱۱ح
    طالمود ۲۹۰ح
    ف،ک،گ،م
    فتح اسلام(تصنیف حضرت مسیح موعودؑ ) ۴۸ح،۳۱۱ح
    فتح البیان ۱۴۸ح
    کرامات الصادقین (تصنیف حضرت مسیح موعودؑ ) ۴۸ح
    کشف الحقائق (رسالہ حسام الدین عیسائی) ۴،۱۶
    گرنتھ ۳۱۴ح
    مثنوی رومی از مولانا جلال الدین رومی ۳۲۱
    مسلم صحیح ۲۸ح
    مظہر الاسلام(رسالہ ابو الموید امروہی) ۷۰
    منن الرحمن(تصنیف حضرت مسیح موعود علیہ السلام) ۲۵۱ح
    میزان الحق (از پادری فنڈل ) ۵
    ن،و،ی
    نور الحق(تصنیف حضرت مسیح موعود ؑ ) ۴۸ح،۳۳۴
    نور افشاں ۱۷ح،۲۰،۳۸
    وید
    وید چاہتی ہے کہ گناہ گاروں کے گناہ کا سلسلہ منقطع نہ ہو ۱۲۳ح
    یرمیاہ(بائیبل) ۱
    یونہ (یوناہ)(یونس نبی کی کتاب ) ۳۰ح
     

اس صفحے کو مشتہر کریں