1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

درثمین ۔ وفات مسیح ناصری علیہ السلام ۔ کیوں نہیں لوگو تمہیں حق کا خیال؟

'درثمین ۔ منظوم کلام حضرت مسیح موعود علیہ السلام' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جون 7, 2018۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    وفات مسیح ناصری علیہ السلام

    کیوں نہیں لوگو تمہیں حق کا خیال؟
    دل میں اُٹھتا ہے مرے سَو سَو اُبال

    ابن مریم مر گیا حق کی قسم
    داخلِ جنت ہوا وہ محترم

    مارتا ہے اُس کو فرقاں سر بسر
    اس کے مرجانے کی دیتا ہے خبر

    وہ نہیں باہر رہا اموات سے
    ہوگیا ثابت یہ تیس آیات سے

    کو ئی مُردوں سے کبھی آیا نہیں
    یہ تو فرقاں نے بھی بتلا یا نہیں

    عہد شد از کردگار بے چگوں
    غور کن در أَنَّهُمْ لَا يَرْجِعُونَ

    اے عزیزو!! سوچ کر دیکھو ذرا
    موت سے بچتا کوئی دیکھا بھلا

    یہ تو رہنے کا نہیں پیارو مکاں
    چل بسے سب انبیاء و راستاں

    ہاں نہیں پاتا کوئی اس سے نجات
    یونہی باتیں ہیں بنائیں واہیات

    کیوں تمہیں انکار پر اصرار ہے
    ہے یہ دین یا سیرت کفّار ہے

    برخلاف نصّ یہ کیاجوش ہے
    سوچ کر دیکھو اگر کچھ ہوش ہے

    کیوں بنایا ابن مریم کو خدا
    سنت اللہ سے وہ کیوں باہر رہا

    کیوں بنایا اس کو باشانِ کبیر
    غیب دان و خالق حیّ و قدیر

    مرگئے سب پر وہ مرنے سے بچا
    اب تلک آئی نہیں اس پر فنا

    ہے وہی اکثر پرندوں کا خدا
    اس خدادانی پہ تیرے مرحبا

    مولوی صاحب یہی توحید ہے؟
    سچ کہو کس دیو کی تقلید ہے؟

    کیایہی توحیدِ حق کا راز تھا
    جس پہ برسوں سے تمہیں اک ناز تھا

    کیا بشر میں ہے خدائی کا نشان؟
    الاماں ایسے گماں سے الاماں!

    ہے تعجب آپ کے اس جوش پر
    فہم پر اور عقل پر اور ہوش پر

    کیوں نظر آتا نہیں راہِ صواب؟
    پڑ گئے کیسے یہ آنکھوں پرحجاب

    کیایہی تعلیمِ فرقاں ہے بھلا
    کچھ تو آخر چاہیئے خوفِ خدا

    مومنوں پر کفر کا کرنا گماں
    ہے یہ کیا ایمانداروں کا نشاں؟

    ہم تو رکھتے ہیں مسلمانوں کا دیں
    دل سے ہیں خدّام ختم المرسلیں

    شرک اور بدعت سے ہم بیزارہیں
    خاکِ راہِ احمدؐ مختار ہیں

    سارے حکموں پر ہمیں ایمان ہے
    جان و دل اس راہ پر قربا ن ہے

    دے چکے دل اب تنِ خاکی رہا
    ہے یہی خواہش کہ ہو وہ بھی فدا

    تم ہمیں دیتے ہو کافر کا خطاب
    کیوں نہیں لوگو تمہیں خوف عقاب

    سخت شورے اوفتاد اندر زمیں
    رحم کن برخلق اے جاں آفریں

    کچھ نمونہ اپنی قدرت کا دکھا
    تجھ کو سب قدرت ہے ،اے ربّ الورا

    ازالہءاوہام حصہ دوم صفحہ764مطبوعہ 1891ء

    [​IMG]
     

اس صفحے کو مشتہر کریں