1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

درثمین ۔ سرائے خام ۔ دنیا کی حرص و آز میں کیا کچھ نہ کرتے ہیں

'درثمین ۔ منظوم کلام حضرت مسیح موعود علیہ السلام' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جون 7, 2018۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    سرائے خام

    دنیا کی حرص و آز میں کیا کچھ نہ کرتے ہیں
    نقصاں جو ایک پیسہ کا دیکھیں تو مرتے ہیں

    زر سے پیار کرتے ہیں اور دل لگاتے ہیں
    ہوتے ہیں زر کے ایسے کہ بس مر ہی جاتے ہیں

    جب اپنے دلبروں کو نہ جلدی سے پاتے ہیں
    کیا کیا نہ ان کے ہجر میں آنسو بہاتے ہیں

    پر ان کو اس سجن کی طرف کچھ نظر نہیں
    آنکھیں نہیں ہیں کان نہیں دل میں ڈر نہیں

    ان کے طریق و دھرم میں گو لاکھ ہو فساد
    کیسا ہی ہو عیاں کہ وہ ہے جھوٹ اعتقاد

    پر تب بھی مانتے ہیں اسی کو بہر سبب
    کیا حال کردیا ہے تعصب نے ہے غضب

    دل میں مگر یہی ہے کہ مرنا نہیں کبھی
    ترک اس عیال و قوم کو کرنا نہیں کبھی

    اے غافلاں و فانہ کند ایں سرائے خام
    دنیائے دوں نماند و نماند بکس مدام


    سرمہ چشم آریہ صفحہ 89 مطبوعہ 1886ء​
     
  2. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

اس صفحے کو مشتہر کریں