1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

درثمین ۔ حمد رب العٰلمین ۔ کس قدر ظاہر ہے نور اُس مبدء الانوار کا

'درثمین ۔ منظوم کلام حضرت مسیح موعود علیہ السلام' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جون 7, 2018۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    حمد رب العٰلمین

    کس قدر ظاہر ہے نور اُس مبدء الانوار کا
    بن رہا ہے سارا عالم آئینہ ابصار کا

    چاند کو کل دیکھ کر میں سخت بے کل ہوگیا
    کیونکہ کچھ کچھ تھا نشاں اس میں جمال یار کا

    اُس بہار حُسن کا دل میں ہمارے جوش ہے
    مت کرو کچھ ذکر ہم سے تُرک یا تاتار کا

    ہے عجب جلوہ تری قدرت کا پیارے ہر طرف
    جس طرف دیکھیں وہی رہ ہے ترے دیدار کا

    چشمۂ خورشید میں موجیں تری مشہود ہیں
    ہر ستارے میں تماشا ہے تری چمکار کا

    تونے خود روحوں پہ اپنے ہاتھ سے چھڑکا نمک
    اس سے ہے شورِ محبت عاشقان زار کا

    کیا عجب تو نے ہر اک ذرّہ میں رکھے ہیں خواص
    کون پڑھ سکتا ہے سارا دفتر اُن اسرار کا

    تیری قدرت کا کوئی بھی انتہا پاتا نہیں
    کس سے کھل سکتا ہے پیچ اس عقدۂ دشوار کا

    خوبرویوں میں ملاحت ہے ترے اس حسن کی
    ہر گُل و گلشن میں ہے رنگ اُس تری گلزار کا

    چشم مست ہر حسیں ہر دم دکھاتی ہے تجھے
    ہاتھ ہے تیری طرف ہر گیسوئے خم دار کا

    آنکھ کے اندھوں کو حائل ہوگئے سو سو حجاب
    ورنہ تھا قبلہ ترا رُخ کافر و دیندار کا

    ہیں تری پیاری نگاہیں دلبرا اِک تیغ تیز
    جن سے کٹ جاتا ہے سب جھگڑا غمِ اغیار کا

    تیرے ملنے کیلئے ہم مل گئے ہیں خاک میں
    تا مگر درماں ہو کچھ اِس ہجر کے آزار کا

    ایک دم بھی کل نہیں پڑتی مجھے تیرے سوا
    جاں گھٹی جاتی ہے جیسے دل گھٹے بیمار کا

    شور کیسا ہے ترے کوچہ میں لے جلدی خبر
    خوں نہ ہو جائے کسی دیوانہ مجنوں وار کا

    سرمہ چشم آریہ صفحہ 4 مطبوعہ 1886ء​
     

اس صفحے کو مشتہر کریں