1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

درثمین ۔ اشاعتِ دین بزورِ شمشیر حرام ہے ۔ اب چھوڑ دو جہاد1 کا اے دوستو خیال

'درثمین ۔ منظوم کلام حضرت مسیح موعود علیہ السلام' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جون 27, 2018۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    اشاعتِ دین بزورِ شمشیر حرام ہے

    اب چھوڑ دو جہاد1 کا اے دوستو خیال
    دیں کیلئے حرام ہے اب جنگ اور قتال

    اب آگیا مسیح جو دیں کا امام ہے
    دیں کی تمام جنگوں کا اب اختتام ہے

    اب آسماں سے نورِ خدا کا نزول ہے
    اب جنگ اور جہاد کا فتویٰ فضول ہے

    دشمن ہے وہ خدا کا جو کرتا اب جہاد
    منکر نبی کا ہے جو یہ رکھتا ہے اعتقاد

    کیوں چھوڑتے ہو لوگو نبیؐ کی حدیث کو
    جوچھوڑتا ہے چھوڑ دو تم اس خبیث کو

    کیوں بھولتے ہو تم یَضَعُ الحَرَب کی خبر
    کیا یہ نہیں بخاری میں دیکھو تو کھول کر

    فرما چکا ہے سیدِ کونین مصطفٰےؐ
    عیسیٰ مسیح جنگوں کا کردے گا التوا

    جب آئے گا تو صلح کو وہ ساتھ لائے گا
    جنگوں کے سِلسلے کو وہ یکسر مٹائے گا

    پیویں گے ایک گھاٹ پہ شیر اور گوسپند
    کھیلیں گے بچے سانپوں سے بے خوف دبے گزند

    یعنی وہ وقت امن کا ہوگا نہ جنگ کا
    بُھولیں گے لوگ مشغلہ تیرو تفنگ کا

    یہ حکم سُن کے بھی جو لڑائی کو جائے گا
    وہ کافروں سے سخت ہزیمت اُٹھائے گا

    اِک معجزہ کے طور سے یہ پیشگوئی ہے
    کافی ہے سوچنے کو اگر اہل کوئی ہے

    القصہ یہ مسیح کے آنے کا ہے نشاں
    کردے گا ختم آکے وہ دیں کی لڑائیاں

    ظاہر ہیں خود نشاں کہ زماں وہ زماں نہیں
    اب قوم میں ہماری وہ تاب و تواں نہیں

    اب تم میں خود وہ قوت و طاقت نہیں رہی
    وہ سلطنت وہ رعب وہ شوکت نہیں رہی

    وہ نام وہ نمود وہ دولت نہیں رہی
    وہ عزمِ مقبلا نہ وہ ہمت نہیں رہی

    وہ علم وہ صلاح وہ عفت نہیں رہی
    وہ نور اور وہ چاند سی طلعت نہیں رہی

    وہ درد وہ گداز وہ رقت نہیں رہی
    خلقِ خدا پہ شفقت و رحمت نہیں رہی

    دل میں تمہارے یار کی اُلفت نہیں رہی
    حالت تمہاری جاذب نصرت نہیں رہی

    حمق آگیا ہے سر میں وہ فطنت نہیں رہی
    کسل آگیا ہے دل میں جلادت نہیں رہی

    وہ علم و معرفت وہ فراست نہیں رہی
    وہ فکر وہ قیاس وہ حکمت نہیں رہی

    دُنیاو دیں میں کچھ بھی لیاقت نہیں رہی
    اب تم کو غیر قوموں پہ سبقت نہیں رہی

    وہ اُنس و شوق ووجد وہ طاعت نہیں رہی
    ظلمت کی کچھ بھی حدّو نہایت نہیں رہی

    ہر وقت جھوٹ۔ سچ کی تو عادت نہیں رہی
    نورِ خدا کی کچھ بھی علامت نہیں رہی

    سو سو ہے گند دل میں طہارت نہیں رہی
    نیکی کے کام کرنے کی رغبت نہیں رہی

    خوانِ تہی پڑا ہے وہ نعمت نہیں رہی
    دیں بھی ہے ایک قشر حقیقت نہیں رہی

    مولیٰ سے اپنے کچھ بھی محبت نہیں رہی
    دل مر گئے ہیں نیکی کی قدرت نہیں رہی

    سب پر یہ اِک بلا ہے کہ وحدت نہیں رہی
    اِک پُھوٹ پڑ رہی ہے مودّت نہیں رہی

    تم مر گئے تمہاری وہ عظمت نہیں رہی
    صورت بگڑ گئی ہے وہ صورت نہیں رہی

    اب تم میں کیوں وہ سیف کی طاقت نہیں رہی
    بھید اس میں ہے یہی کہ وہ حاجت نہیں رہی

    اب کوئی تم پہ جبر نہیں غیر قوم سے
    کرتی نہیں ہے منع صلوٰۃ اور صوم سے

    ہاں آپ تم نے چھوڑ دیا دیں کی راہ کو
    عادت میں اپنی کر لیا فسق و گناہ کو

    اب زندگی تمہاری تو سب فاسقانہ ہے
    مومن نہیں ہو تم کہ قدم کا فرانہ ہے

    اے قوم !تم پہ یار کی اب وہ نظر نہیں
    روتے رہو دعاؤں میں بھی وہ اثر نہیں

    کیونکر ہو وہ نظر کہ تمہارے وہ دل نہیں
    شیطاں کے ہیں خدا کے پیارے وہ دل نہیں

    تقویٰ کے جامے جتنے تھے سب چاک ہو گئے
    جتنے خیال دل میں تھے ناپاک ہو گئے

    کچھ کچھ جو نیک مرد تھے وہ خاک ہو گئے
    فاقی جو تھے وہ ظالم و سفّاک ہو گئے

    اب تم تو خود ہی موردِ خشمِ خدا ہوئے
    اُس یار سے بشامتِ عصیاں جُدا ہوئے

    اب غیروں سے لڑائی کے معنے ہی کیا ہوئے
    تم خود ہی غیرین کے محلِّ سزا ہوئے

    سچ سچ کہو کہ تم میں امانت ہے اب کہاں
    وہ صدق اور وہ دین و دیانت ہے اب کہاں

    پھر جبکہ تم میں خود ہی وہ ایماں نہیں رہا
    وہ نور مومنانہ وہ عرفاں نہیں رہا

    پھر اپنے کفر کی خبر اے قوم لیجیئے
    آیت علیکم انفسکم یاد کیجیئے

    ایسا گماں کہ مہد ئ خونی بھی آئے گا
    اور کافروں کے قتل سے دیں کو بڑھائے گا

    اے غافلو! یہ باتیں سراسر دروغ ہیں
    بہتاں ہیں بے ثبوت ہیں اور بے فروغ ہیں

    یارو جو مرد آنے کو تھا وہ تو آچکا
    یہ راز تم کوشمس و قمر بھی بتا چکا

    اب سال سترہ١٧ بھی صدی سے گذر گئے
    تم میں سے ہائے سوچنے والے کِدھر گئے

    تھوڑے نہیں نشاں جو دکھائے گئے تمھیں
    کیا پاک راز تھے جو بتائے گئے تمھیں

    پر تم نے اُن سے کچھ بھی اُٹھایا نہ فائدہ
    مُنہ پھیر کر ہٹا دیا تم نے یہ مائدہ

    بخلوں سے یارو باز بھی آؤگے یا نہیں
    خو اپنی پاک صاف بناؤ گے یا نہیں

    باطل سے میل دل کی ہٹاؤ گے یا نہیں
    حق کی طرف رجوع بھی لاؤ گے یا نہیں

    اب عذر کیا ہے کچھ بھی بتاؤگے یا نہیں
    مخفی جو دل میں ہے وہ سُناؤ گے یا نہیں

    آخر خدا کے پاس بھی جاؤ گے یا نہیں
    اُس وقت اُس کو مُنہ بھی دکھاؤ گے یا نہیں

    تم میں سے جس کو دین و دیانت سے ہے پیار
    اب اُس کا فرض ہے کہ وہ دل کرکے اُستوار

    لوگوں کو یہ بتائے کہ وقتِ مسیح ہے
    اب جنگ اور جہاد حرام اور قبیح ہے

    ہم اپنا فرض دوستو اب کر چکے ادا
    اب بھی اگر نہ سمجھو تو سمجھائیگا خُدا

    1۔یہاں جہاد سے مراد اسلام کوبزورشمشیر پھیلانا ہے
    جو کہ غیر اسلامی نظریہ ہے۔

    ضمیمہ تحفہ گولڑویہ صفحہ26مطبوعہ 1902ء
    [​IMG]
     

اس صفحے کو مشتہر کریں