1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اس فورم کا مقصد باہم گفت و شنید کا دروازہ کھول کر مزہبی مخالفت کو احسن طریق سے سلجھانے کی ایک مخلص کوشش ہے ۔ اللہ ہم سب کو ھدایت دے اور تا حیات خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع بنائے رکھے ۔ آمین
    Dismiss Notice
  3. [IMG]
    Dismiss Notice
  4. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ مہربانی فرما کر اخلاق حسنہ کا مظاہرہ فرمائیں۔ اگر ایک فریق دوسرے کو گمراہ سمجھتا ہے تو اس کو احسن طریقے سے سمجھا کر راہ راست پر لانے کی کوشش کرے۔ جزاک اللہ
    Dismiss Notice

خطبات ناصر ۔ حضرت مرزا ناصر احمد رح ۔ جلد 3

'یونی کوڈ کتب' میں موضوعات آغاز کردہ از MindRoasterMir, ‏جنوری 25, 2018۔

  1. MindRoasterMir

    MindRoasterMir لا غالب الاللہ رکن انتظامیہ منتظم اعلیٰ معاون مستقل رکن

    خطبات ناصر ۔ حضرت مرزا ناصر احمد رح ۔ جلد 3


    ہمارا دل رحمن کی حمد سے معمور ہے
    ختم ہونے والا جلسہ بہت بابرکت جلسہ تھا
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲؍جنوری ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ۔غیر مطبوعہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    ہمارا دل اپنے ربّ رحمن کی حمد سے اور شکر سے معمور ہے۔ اس نے وقت سے بھی پہلے یہ بشارت دی تھی اور بہت سے دوستوں کو خوابوں کے ذریعہ یہ بتایا تھا کہ یہ ہمارا جلسہ سالانہ جو ابھی چند دِن ہوئے ختم ہوا ہے وہ بہت بابرکت جلسہ ہو گا۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ کی برکتوں ا ور اس کی رحمتوں کو خاص طور پر احمدی بھائیوں نے آسمان سے نازل ہوتے دیکھا یا محسوس کیا۔
    ہمارے زمیندار بھائی اپنے احساسات کا اظہار علماء کی طرح تو نہیں کر سکتے اور نہ وہ کرتے ہیں لیکن اپنے بیان میں وہ بڑے زندہ محاورے استعمال کر جاتے ہیں۔ بیسیوں احمدی زمینداروں نے اس تأثر کا اظہار کیا کہ جلسہ پر جو دیکھا جو سُنا وہ تو ٹھیک تھا دیکھا بھی اور سُنا بھی لیکن احساس یہ تھا کہ جیسے آسمان سے اللہ تعالیٰ کی برکت نازل ہو رہی ہے۔
    میں نے بتایا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے جلسہ کی برکتوں کے متعلق احمدی بھائیوں اور بہنوں کو بہت سی خوابیں دکھائیں اور یہ بتایا کہ یہ جلسہ بڑی رحمتوں اور برکتوں والا جلسہ ہو گا۔ ان میں سے ایک خواب جو ہماری ایک بہن کی ہے وہ دوستوں کو میں سُنا دیتا ہوں چٹا گانگ سے ہمارے بھائی عبدالرحیم صاحب یونس مع اہلیہ کے آئے ہوئے ہیں ان کی اہلیہ صاحبہ نے ایک خواب دیکھی جو انہوں نے مجھے لکھ کر بھجوائی اس کا پہلا حصّہ زیادہ تر ان کی ذات سے تعلق رکھتا ہے اسے میں نے چھوڑ دیا ہے اللہ تعالیٰ ہر شکل میں ان کے لئے اس حصّہ کو بھی بابرکت کر ے جس حصّہ کا جماعت سے اور اس جلسہ سے تعلق ہے اس حصّہ کو میں سُنا دیتا ہوں وہ لکھتی ہیں:۔
    ’’اتنے میں میری نظر اُٹھی تو دیکھا کہ مُجھ سے کچھ فاصلے پر ایک بزرگ ہستی تشریف فرما ہیں۔ میرے قریب کھڑی ایک بہن نے مجھے بتایا کہ حضرت اماں جانؓ ہیں یہ سُنکر میں خوشی خوشی آگے بڑھی اور قریب گئی تو میں نے دیکھا کہ وہ بزرگ ہستی حضرت نواب مبارکہ بیگم صاحبہ ہیں۔‘‘یعنی پہلے نُصرت جہاں پھر مبارکہ بیگم ناموں کی تعبیر ہوتی ہے۔
    ’’میں قریب بیٹھ گئی تو وہ کہنے لگیںکہ آج میری ملاقات حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے ہوئی تھی آپ نے فرمایا کہ میں امسال جلسہ پر آنے والوں سے بہت خوش ہوں اور میں نے ان سب کے لئے بہت دعائیں کی ہیں اور بہت دُعائیں کر رہا ہوں۔‘‘دوستوں نے اس قسم کی بہت سی خوابیں دیکھی تھیں۔
    یہ تقریر کے متعلق بھی بعض دوستوں نے خواب دیکھی کہ اللہ تعالیٰ بڑا فضل کرے گا اور اپنی رحمت سے اس مضمون کو تیار کر دے گا اور ساتھ یہ بھی دیکھا کہ جو منافق الٰہی سلسلوں کے بیچ میں ہوتے ہیں ان میں سے ایک آدھ یہ اعتراض بھی کریں گے کہ یہ بھی کوئی تقریر ہے۔ پس یہ چیزیں بعض چھوٹی چھوٹی خوابوں میں اس لئے آ جاتی ہیں تاکہ یہ ظاہر ہو کہ یہ نفس کی خواب نہیں۔ بعض ایسی چیزیں ہیں جن کو نفس سوچتا ہی نہیں مثلاً جو پیار کرنے والا دل ہے وہ پیار والا حصّہ دیکھ لے گا اگر اس کے نفس کا اثر ہو اورجو معترض ہے وہ صرف اعتراض والا حصہ دیکھ لے گا پس جب پیار کرنے والے کو ایسی خواب آتی ہے تو اس میں اعتراض والا حصّہ بھی دکھایا جاتا ہے جس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ یہ حصّہ اس کے نفس کا نہیں ہے بلکہ ایک حقیقت ہے۔
    جیسا کہ دوست جانتے ہیں اللہ تعالیٰ نے بڑا فضل کیا میں عید کے بعد انفلوائنزا کی وجہ سے بیمار ہو گیاتین چار دِن بخار میں لیٹا رہا میری طبیعت میں بڑی گھبراہٹ بھی تھی کیونکہ امامِوقت پر بولنے کی بڑی ذمہ داری ہوتی ہے بعض لوگ تو یوں ہی بولتے رہتے ہیں مجھے تعجب آیا کرتا ہے کہ یہ کیسے بڑی جرأت کے ساتھ بولتے چلے جاتے ہیں میں نے تو اپنے نفس میں یہ محسوس کیا ہے کہ بولنے سے پہلے بے شمار استغفار کرنی پڑتی ہے دعائیں کرنی پڑتی ہیں۔خیر امام کا مقام اور ہے لیکن یہ درست ہے کہ حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ہر انسان کی زبان پر پابندی بھی عائد کی ہے۔ غرض دعاؤں اور استغفار اور توبہ کے بعد پھر میں خطبہ جمعہ دیتا ہوں یا اور کوئی تقریر کرتا ہوں یا کوئی بات کرتا ہوں اس کے بغیر تو میں بات نہیںکر سکتا یعنی میرے اندر یہ جرأت نہیں ہے کہ میں استغفار کئے بغیر اور اللہ تعالیٰ کی مدد کے لئے بے حد دعاؤں کے بغیر کوئی بات منہ سے نکالوں اور اللہ تعالیٰ بڑی مدد کرتا ہے بڑا پیار کرنے والا ہے بعض دفعہ مثلاً بعد میں بھی کسی کے تسلی نہیں ہوتی یا کوئی معترض اعتراض سنانا شروع کرتا ہے طبیعت میں ایک حجاب پیدا ہوتا ہے بہر حال میں ایک انسان ہوں اور بشری کمزوری میرے ساتھ لگی ہوئی ہے کوئی غلطی نہ ہو گئی ہو۔
    ایک دفعہ میں نے ایک مضمون بیان کیا اور جب قریب تھا کہ میں اُسے بھیج دیتا میں نے سُنا کہ بعض لوگ کہتے ہیں کہ اس میں یہ خامی ہے یہ کمزوری ہے چنانچہ میں دعاؤں میں لگ گیا اور اللہ تعالیٰ نے بتایا کہ یہ مضمون بالکل ٹھیک ہے اور اس کو شائع کرو چنانچہ پھر میں نے اسے شائع کرنے کے لئے بھی بھیج دیا پس اللہ تعالیٰ نے بڑا فضل کیاایک ایسا مضمون جس میں بڑی وسعت تھی وہ خود ہی سکھا دیا اور چونکہ وہ بالائے وقت ہستی ہے عام لوگ تو بعض دفعہ یہ فقرہ نہیں سمجھ سکتے کہ اللہ تعالیٰ زمان و مکان سے بالا ہے۔ یہ وقت اور مکان جو ہیں یہ انسان کا احساس ہے یہ اللہ تعالیٰ کی ذات جو ہے اس کا اِس سے کوئی تعلق نہیں وہ ان چیزوں سے بالا ہے اس کے قدرت کے جلووں میں بعض دفعہ یہ چیز کہ وہ مکان اور وقت سے بالا ہے بڑی نمایاں ہوتی ہے۔اتنا بڑا مضمون جس کے تیس جزو تھے جن میں سے میں نے اس وقت صرف اٹھارہ dictate(یعنی لکھوا) دئیے تھے یعنی اس خیال سے کہ سنبھالے جائیں میں نے سمجھا کہ یہ مضمون لمبا ہو جانے کی وجہ سے شاید میں تمام مضمون بیان نہیں کر سکوں گا چنانچہ ان میں سے صرف تین بیان کر سکا اور سکھانے والے معلم یعنی اللہ تعالیٰ رب العالمین نے یہ سارا مضمون سکھانے میں ایک سیکنڈ بھی نہیں لیا۔ وقت سے بالا قدرت کا جلوہ دماغ کے اوپر آتا ہے اور وہ دماغ کے کونے کونے کو روشن کر جاتا ہے اور ایک مضمون ذہن میں آجاتا ہے۔
    اللہ تعالیٰ نے جلسہ سالانہ کو ہمارے پہلے جلسوں سے بھی بہت بابرکت کیا اور پہلے جلسوں سے زیادہ بابرکت ہی ہونا چاہئے تھا ورنہ تو ہمارے دل ڈر جاتے اور ہم بڑے پریشان ہو جاتے کہ ہمارا قدم اب آگے کی طرف نہیں ہے، ٹھہر گیا ہے یا پیچھے کی طرف ہے۔ یہ فکر بھی دماغ کو لگی رہتی ہے جس پر ذمہ داری ڈالی جائے کہ جماعت کا قدم ہمیشہ آگے ہی ہو۔
    اگرچہ جلسہ سالانہ کے لنگروں سے کھانے والوں کی تعدادمیں تو صرف ڈیڑھ ہزار نفوس کی زیادتی ہوئی ہے لیکن جس نگاہ نے جلسہ گاہ اور جمعہ والے دن اور دوسری نمازوں کے وقت ہجوم دیکھا اور ان کمزوروں کو بھی دیکھا جو ہزاروں کی تعداد میں جلسہ گاہ میں نہیں تھے راستے میں مجھے ملے وہ وقت پر نہیں پہنچ سکے وہ یقینا پچھلے سال سے بہت زیادہ تھے۔
    پھر وہ دوست جو ہماری جماعت سے تعلق نہیں رکھتے بڑی کثرت سے آئے تھے عام اندازہ یہ ہے کہ جلسہ میں کم از کم آٹھ دس ہزار آدمی ایسے ہوں گے جن کا ہماری جماعت کے ساتھ تعلق نہیں پھر ان میں اس دفعہ نمایاں چیز یہ تھی کہ جو لوگ اپنے اپنے علاقے میں مولوی کہلاتے ہیں وہ بھی اپنی پوری ہیئت اور پوری ذہنیت کے ساتھ بڑی کثرت سے آئے اور ان میں سے بہتوں نے جلسہ پر ہی بیعت کر لی اور بیعت کے وقت بعض کو میں نے کہا بھی کہ اگر دُنیوی آرام کے لئے جماعت میں شامل ہونا چاہتے ہو تو وہ یہاں نہیں ملے گا یہاں تو گالیاں کھانی پڑتی ہیں ماریں کھانی پڑتی ہیںدُکھ اُٹھانے پڑتے ہیں خدا کے لئے قربانیاں دینی پڑتی ہیں۔یہ باتیں پہلے سوچ کر جماعت میں داخل ہوں۔ ایک مولوی صاحب جن کے ساتھ میں نے بڑے نمایاں طور پر اورکھل کر یہ بات کی تھی وہ کہنے لگے کہ ’’ہُن دیکھیا جائے گا جو ہوئے گا‘‘ بڑا پختہ تھا بہت سوں نے بیعت نہیں بھی کی لیکن اُن پر اثر یہ تھا بات تو چھوٹی سی ہے لیکن مجھے اللہ تعالیٰ کا فضل دیکھ کر اتنا لُطف آیا اس چھوٹی سی بات میں کہ میں اس کو بیان کر دیتا ہوں۔
    چار غیر احمدی مولوی اکٹھے ایک دوست کے ساتھ آئے تھے غالباً ایک دوسرے کا سہارا لے رہے ہوں گے کہ ہم میں سے کوئی پھسل نہ جائے بہر حال و ہ عام ملاقاتوں میں آئے اور دوستوں نے بتایا کہ یہ ہمارے ساتھ آئے ہیں ہمارے علاقے کے مولوی ہیں میں نے ان سے ایک دو منٹ باتیں کیں مصافحہ کیا چلے گئے دوسری جماعت آ گئی اور پھر میں کیا دیکھتا ہوںکہ ان میںسے پہلے ایک واپس آیا جو رضا کار وہاں کھڑے تھے انہوں نے اسے روکا لیکن یہ کہے کہ نہیں مجھے جانا ہے میری نظر پڑ گئی میں نے کہا کہ آنے دو اسے۔ چنانچہ اس نے پھر مصافحہ کیا اور چلا گیا پھر دوسرا آ گیا پھر تیسرا آگیا اور پھر چوتھے کو میں نے روکا اور کہا کہ تم ابھی مصافحہ کر کے گئے ہو پھر دوبارہ آ رہے ہو کہنے لگے ابھی سیری نہیں ہوئی۔
    پس اگرچہ انہوں نے بیعت تو نہیں کی لیکن بہر حال کوئی اثر قبول کیا جس کا اس رنگ میں انہوں نے اظہار کیا اب میری یا آپ کی کوشش سے یہ نتیجہ نہیں نکل سکتا کہ دل پر ایسا اثر ہویہ تو محض اللہ تعالیٰ کے فضل سے ایسا ہوا پس اللہ تعالیٰ نے بڑے فضل کئے ہیں۔
    پھر انتظام کے لحاظ سے بڑے فضل ہوئے ایک تھوڑی سی خرابی یہ ہوئی تھی کہ ایک جگہ پر ہماری بس پر چھوٹے بچوں کو آلہ کار بنا کر بعض فتنہ پردازوں نے پتھراؤ کروایا تھا چنانچہ میں نے وہاں کے افسروں کو یہ پیغام بھیجا تھا کہ یا تم انتظام کر دو یا ہم انتظام کر دیں گے کیونکہ عورتوں اور بچوں پر پتھر نہیں مارے جائیں گے جومرد ہیں بڑے وہ تو ماریں کھانے کے بھی عادی ہیں اور پتھر کھانے کے بھی عادی ہیں اور گالیاں سُننے کے بھی عادی ہیں لیکن اگر کسی احمق کو یہ خیال پیدا ہو کہ وہ ہماری عزت پر بھی ہاتھ ڈال سکتا ہے اور عورتوں کو ذلیل کرنے کی کوشش کر سکتا ہے تو یہ نہیں ہو گا پس یا تم انتظام کر دو اگر نہیں کر سکتے تو ہمیں بتا دو ہم خود اپنا انتظام کر لیں گے لیکن انہوں نے کہا نہیں آپ فکر نہ کریں اب یہ بات نہیں ہو گی چنانچہ پھر نہیں ہوئی اللہ تعالیٰ نے ہر لحاظ سے فضل کیا۔
    کھانے کا انتظام بھی اللہ تعالیٰ کے فضل سے خاصا اچھا رہا گو اتنا اچھا ہو گیا ہے اس جلسہ کی وسعت اور عظمت کے لحاظ سے کہ اگر پندرہ منٹ بھی کسی کو دیر سے کھانا ملے تو وہ شکایت لکھ کر بھجوا دیتا ہے۔ جب میں چھوٹا تھا پھر جوان تھا قادیان میں کام کیا کرتے تھے تو مجھے یاد ہے کہ قادیان میں کوئی ایسا جلسہ نہیں گذرا ہوگا یعنی وہاں آخری جلسے تک کہ ہم بارہ ساڑھے بارہ بجے سے پہلے کھانا کھلانے سے فارغ ہوئے ہوں لیکن اب یہ حال ہے کہ جب میں افسر جلسہ سالانہ ہوتا تھا تو ایک سال حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کے پاس ساڑھے آٹھ بجے یہ شکایت چلی گئی کہ ساڑھے آٹھ بج چکے ہیں اور ہماری جماعت کو ابھی تک کھانا نہیں ملا۔
    پس یہ انتظام کی دن بدن جو اس میں Efficiency(افیشنسی) اور عمدگی اور خوبی پیدا ہو رہی ہے یہ اس کا نتیجہ ہے اور ہماری یہ کوشش ہے کہ پہلے ساڑھے بارہ بجے بھی کھانے سے فارغ ہوتے تھے تو شکایت نہیں پیدا ہوئی تھی لوگ سمجھتے تھے کہ ہجوم زیادہ ہے (اس کے مقابلے میں تو شاید چوتھائی ہوتا ہو گا ان جلسوں میں) بہر حال ہجوم بڑا ہے رضا کار تھوڑے ہیں اتنا بڑا انتظام نہیں یہ باتیں ہو جایا کرتی ہیں پھر لوگوں نے یہ سمجھا کہ اللہ تعالیٰ اس طرح بھی فضل کرتا ہے کہ اتنے بڑے وسیع اجتماع کے انتظام بغیر خرچ کے ہو جائیں پھر آہستہ آہستہ انہوں نے سمجھا کہ اللہ تعالیٰ اتنا فضل کرنے والا ہے اور یہ ان کی سُستی ہے کہ ساڑھے آٹھ بج گئے ہیں اور ہمیں کھانا وقت پرنہیں ملا اور ممکن ہے کہ آئندہ سال یا اس سے آئندہ سال آٹھ بجے یہ شکایت آجائے کہ آٹھ بج گئے ہیں اور ہمیں ابھی تک کھانا نہیں ملا انتظام دن بدن بہتر ہوتا جا رہا ہے اس وقت میرے دل میں یہ احساس پیدا ہوا ہے یعنی یہ نہیں کہ مجھے کچھ بتایا گیا ہو یا میں نے خواب دیکھی ہو۔ بس احساس ہے کہ آئندہ کھانا کھانے والوں کی تعداد میں دس ہزار کی زیادتی ہو گی اور ہمارے انتظام میں سب سے مشکل حصّہ روٹی ہے سالن آسانی سے پک جاتا ہے کوئی دقت نہیں ہوتی ہمارے بھائی اتنے اچھے ہیں کہ جب گوشت کی دیگ ختم ہو جائے تو آدھ گھنٹہ میں دال پک جاتی ہے اور وہ لے لیتے ہیں اور کسی کو کوئی شکوہ نہیں پیدا ہوتا لیکن بہر حال روٹی تو ہونی چاہئے اور وسعت اتنی ہو چکی ہے کہ میرے خیال میں پونے دو سو کے قریب بلکہ اس سے زیادہ شاید سوادو سو کے قریب تنور لگتے ہیں اس کا مطلب یہ ہے کہ چار پانچ سو نانبائی اپنے اڈوں سے اُٹھ کر تین چار دن کے لئے اپنا کرایہ خرچ کر کے یہاں آجائیں یہ تو اللہ تعالیٰ کا فضل ہے ورنہ ہمیں یہ سمجھ نہیں آتی کہ آتا کیوں ہے یہاں نانبائی کرایہ وہ اپنا خرچ کرتا ہے مثلاً جو ملتان سے آیا ہے اس نے آنے جانے کا کرایہ اپنا خرچ کیا ہے اور تین یا چار دن اس نے یہاں کام کیا اور بمشکل تیس چالیس روپے اس نے کمائے لیکن اب وسعت اتنی ہو گئی ہے کہ شاید ہمارے ملک میں اس طرح اُٹھنے والے نانبائی اتنے میسر ہی نہ آ سکیں۔
    کئی سالوں سے فکر تھی ہمارے بعض احمدی انجینئرز نے بڑے ہی اخلاص کا نمونہ دکھایا ہے۔ دوست ان کے لئے دعا کریں ایک مشین تو کراچی میں تیار ہو گئی تھی دوسری مشین جس پر یہاں انجینئرز لگے رہے ہیںکئی روز متواتر جوبیس گھنٹے انہوں نے کام کیا ہے آخر ایک وہ وقت آیا کہ انسانی جسم تو بہرحال محدود طاقت رکھتا ہے وہ Collapse(کلیپس) کر گیا اور ان کی طبیعت پر بڑا اثر ہوا ہمیں بڑی فکر پیدا ہوئی کہ اللہ تعالیٰ فضل کرے اللہ تعالیٰ انہیں صحت تو آہستہ آہستہ دے رہا ہے انشاء اللہ ٹھیک ہو جائیں گے دوست ان کے لئے بھی اور جو دوسرے اخلاص سے کام کرنے والے ہمارے رضا کار ہیں ان کے لئے بھی بہت دعائیں کیا کریں۔
    دُعا کا ایک فائدہ تو یہ ہو گا کہ آپ کے دل میں بھی رضا کارانہ خدمت کا احساس پیدا ہوگا مثلاً جب گھر کا ایک باپ یہ دُعا کرے گا کہ اے خدا! اس طرح بے نفس چوبیس گھنٹے تیری رضا کی خاطر یہ کام کرنے والے رضاکار ہیں تو ان پر اپنے بڑے فضل اور بڑی برکتیں نازل کر تو اس متضرعانہ دُعا کے عین درمیان اسے یہ خیال پیدا ہو گا کہ اس دُعا سے میرے وہ بچے محروم ہیں جن کو میں نے گھر میں بٹھا لیا تھا اور رضاکارانہ خدمت کے لئے نہیں بھیجا تھا۔ پس اس دُعا کے نتیجہ میں ہمیں زیادہ تربیت یافتہ اور زیادہ اخلاص سے کام کرنے والے اور رضاکار بھی مل جائیں گے اور پھر جن کا حق ہے کہ انہوں نے ہماری طرف سے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوۃ والسلام اور حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے مہمانوں کی خدمت کی ہم اللہ کے حضور کہیں کہ اے خدا! تو ان پر زیادہ سے زیادہ فضل اور رحم کر اور بِاَحْسَنِ مَا کَانُوْا یَعْمَلُونَ۔(النَّحل:۹۸)
    مجموعی طور پر جو سب سے اچھے کام کرنے والے رضا کار اس جلسے میں تھے سارے رضا کاروں کو اسی کے مطابق جزا دے دے ایک جان ہو کر سارے کام کر رہے تھے۔
    یہ بھی بڑا فضل ہے اتنے بڑے مجمع کے لئے سوائے ان مزدوروں کے یا ان غیر احمدی نانبائیوں وغیرہ کے بعض ایسے کام ہوتے ہیں جن کے لئے احمدی ملتے نہیں یا بعض ایسے کام ہیں کہ احمدی ہیں اور بڑے تھوڑے کام ہیں جن میں ہم سمجھتے ہیں کہ ان کو پیسے ملنے چاہئیں ان سے رضاکارانہ خدمت نہیں لینی چاہئے ان کے علاوہ ہزاروں آدمی دن رات لگے ہوئے ہوئے ہیں نہ اپنی ہوش ہے نہ اپنے کھانے کی، نہ اپنے آرام کی، نہ اپنے لباس کی ہر وقت کام میں لگے ہوئے ہیں۔
    یہ اللہ تعالیٰ کا اتنا بڑا فضل اور رحم ہے کہ دل کے اندر اس نے خدمت کا یہ جذبہ پیدا کیا ہے اور توفیق دی ہے اپنی اس جماعت کے بالکل نوعمر افراد کو کہ وہ اللہ تعالیٰ کی راہ میں اس طرح خدمت کریں اب بھی یہی ہوتا ہے چھوٹے چھوٹے بچے ہوتے ہیں ہم اُنکی عمر کے لحاظ سے ان کو یہ کام دے دیتے ہیں کہ جاؤ تنوروں سے روٹیاں اُٹھاؤ اور جہاں ہم نے اکٹھی کرنی ہیں یا جہاں سے تقسیم کرنی ہیں وہاں لے جاؤ اس میں بڑی عمر کے آدمیوں کی ضرورت نہیں چنانچہ یہ چھوٹے چھوٹے بچے بھمبیری کی طرح چکر لگا رہے ہوتے ہیں نہ دن کو دن سمجھتے ہیں نہ رات کو رات اور کام میں لگے ہوئے ہوتے ہیں۔ یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے ہماری جماعت کی کوئی خُوبی یا کسی فرد کی خوبی نہیں ہے یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے اس کی رحمت ہے جو جلسہ کے ایام میں مختلف شکلوں میں نازل ہوتی ہے کہ دلوں کے اندر ایک سکون ایک اطمینان ایک خوشی ایک احساس پیدا ہو جاتا ہے کہ اللہ تعالیٰ اپنی رحمتوں اور اپنے فضلوں سے ہمیں نواز رہا ہے اور آسمان سے برکتیں نازل ہو رہی ہیں یہ میرا یا آپ کا کام نہیں یہ تو اللہ تعالیٰ ہی کر سکتا ہے اور وہ کرتا ہے اور بڑے فضل کرتا ہے زبانیں کھولتا ہے دماغ روشن کرتا ہے کانوں کی کھڑکیوں کو فراخ کرتا ہے دلوں کے راستوں کو صاف کرتا ہے پھر دلوں پر اثر ہوتا ہے یہ ساری چیزیں ہوتی ہیں غرض اللہ تعالیٰ کے فرشتے کام کر رہے ہوتے ہیں اور جب اتنا بڑا کارخانہ اللہ تعالیٰ کے فرشتوں کا ہمارے لئے کام کر رہا ہو اور ہمیں بھی گھسیٹ کر اپنے ساتھ کام پر لگالے تو اس کے بعد ہمارے دل اس کی حمد سے معمور کیوں نہ ہوں گے اور اس کے بعد ہمارے دل میں اس کے شکر کے جذبات سمندر کی موجوں کی طرح ٹھاٹھیں کیوں نہ ماریں گے۔
    الحمدللہ پڑھیں بہت الحمد للہ پڑھیں کہ حمد اور شکر کے نتیجہ میں انسان بہتر اور بڑے فضل کا وارث بنتا ہے۔ اللہ تعالیٰ حمد کی بھی توفیق دے دُعا کی بھی توفیق دے اور اللہ تعالیٰ ایسے سامان پیدا کرے کہ ہمارا ہر قدم نہ صرف یہ کہ پہلے سالوں سے آگے بڑھنے والا ہو بلکہ دو پیروں کا فاصلہ بھی زیادہ لمبا ہو یعنی صرف پہلے سال کی نسبت سے اللہ کے فضلوں میں زیادتی نہ ہو بلکہ دُگنی تگنی چوگنی زیادتی کے ساتھ ہر سال آئے۔ یہ سال جس میں ہم داخل ہو رہے ہیں، ہے بڑا اہم یہ میں آپ کو بتا دیتا ہوں اور اللہ تعالیٰ اپنی قدرت سے بعض ایسے سامان پیدا کرے گا جن کو ہم اس وقت سونگھ تو رہے ہیں لیکن پہچان نہیں رہے۔نیا سال آگیا۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے
    ’’وَقَدَّرَہٗ مَنَازِلَ لِتَعْلَمُوْا عَدَدَ السِّنِیْنَ وَالْحِسَابَ‘‘ (یونس :۶(
    بہت سا مضمون یہاں بیان ہوا ہے لیکن ایک یہ ہے ’’مَا خَلَقَ اللّٰہُ ذٰلِکَ اِلاَّ بِالْحَقِّ‘‘
    (یونس:۶)
    کہ تمام کارخانہ عالم وقت کے ساتھ بندھا ہوا ہے۔ عَدَدَالسِّنِیْنَ وَ الْحِسَابَ ہے نا کہ یہ کائنات یہ دُنیا یہ عالمین جو وقت کے ساتھ بندھے ہوئے ہیں اللہ تعالیٰ نے اپنی قدرتوں کا یہ جلوہ دکھایا ہے۔ مَا خَلَقَ اللّٰہُ ذٰلِکَ اِلَّا بِالْحَقِّ۔ (یونس:۶)
    میں نے بتایا ہے یہ مضمون بڑا وسیع ہے میں اس میں سے ایک چھوٹا سا ٹکڑا لے رہا ہوں کہ انسان کی بدلی ہوئی حالت کے مطابق اللہ تعالیٰ کا اس کے ساتھ سلوک ہوتا ہے۔ حق کے معنے ہی یہ ہوتے ہیں یعنی موافقت کے۔ انسان جب ایک سال ترقی کرتا ہوا سال کو ختم کرتا ہے تو نئے سال میں داخل ہونے والا زید وہ زید نہیں ہوتا جو پچھلے سال میں داخل ہوا تھا بدل چکا ہوتا ہے اپنی تربیت میں اپنے اخلاص میں اپنی قربانیوں کے نتیجہ میں وہ ایک اور ہی انسان ہوتا ہے اور اللہ تعالیٰ نے یہ وعدہ دیا کہ اگر تم اورنیک انسان بنو گے اور زیادہ اخلاص رکھنے والے انسان بنو گے اور زیادہ مجھ سے محبت کرنے والے انسان بنو گے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اور زیادہ فدائی بنو گے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے اور زیادہ پیار کرنے والے بنو گے تو میں اِلَّا بِالْحَقِّ یعنی میں ایک نئی شان کے ساتھ تم پر جلوہ گر ہوں گا اور تمہاری بدلی ہوئی نیک حالت کے مطابق بدلے ہوئے سامان پہلے سے بہتر محبت کا اظہار میں تم سے کرنے والا ہوں گا ایک نئے دور میں تم داخل ہو گے وہ دور تمہارے لئے بہتر ہو گا خدا کرے کہ جس طرح پچھلے سال ہم نے اللہ تعالیٰ کی قدرت کا نظارہ دیکھا کہ فساد کے ایام میں ڈرتے ہوئے دلوں کے ساتھ ہم پچھلے سال ہی داخل ہوئے تھے اور اللہ تعالیٰ کی رحمتوں اور برکتوں کی بارش ہم پر نازل ہو رہی تھی جب تیاری کر رہے تھے جلسہ کے دنوں میں سال رواں میں داخل ہونے کی۔
    پس خدا کرے کہ جس طرح وہ فرق ہماری طبیعتوں اور ذہنوں نے محسوس کیا کہ جو فرق پچھلے سال کی ابتداء اور انتہاء میں تھا خدا کرے کہ سال رواں کی انتہاء اپنی رحمتوں میں اس قدر عظیم ہو کہ جس وقت ہم وہاں پہنچیں تو یہ ابتداء جو اللہ تعالیٰ کی بڑی ہی رحمتوں پر مشتمل ہے یہ جو ہم نے پایا ہمیں اس طرح نظر آئے کہ جس طرح وہ کچھ بھی نہیں تھا۔ اللہ تعالیٰ نے کتنا فضل کیاکہ ہمیں پہلے سے کہیں زیادہ اس نے عطا دی وہ بڑی قدرتوں والا اور بڑا پیار کرنے والا ہے خدا کرے کہ ہمارے دل اور ہمارے دماغ اور ہماری روح اس سے محبت کریں اور اس کے پیار کے متلاشی ہوں اور اس کی محبت میں ایک دیوانہ اور مست بن جائیں اور خدا کرے کہ وہ ہمیں پہلے سے زیادہ رحمتوں کا اہل پائے ا ور پھر اپنی بے شمار رحمتیں ہمیں عطا کرے کہ وہ سب قدرتوں والا ہے۔
    جمعہ کی نماز پڑھانے کے بعد حضور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہٖ نے فرمایا:-
    میرے چھوٹے بھائی ڈاکٹر مرزا منور احمد صاحب کے لڑکے عزیزم ڈاکٹر مرزا مبشر احمد کو اللہ تعالیٰ نے وقف زندگی کی توفیق دی تھی انہوں نے ڈاکٹری کی، کچھ عرصہ یہاں ہسپتال میں کام کیا اب اللہ کے فضل سے وہ مزید تعلیم کے لئے رخصت پر اپنے خرچ پر انگلستان جا رہے ہیں یہاں سے اُن کی آج روانگی ہوگی اور غالباً کل لاہور سے ہوائی جہاز کے ذریعہ روانہ ہو جائیں گے۔
    میری یہ خواہش ہے اور درخواست ہے کہ آپ بہت دُعا کریں کہ اللہ تعالیٰ ان کے علم میں اور ان کی عقل میں برکت ڈالے اور ان کے جذبہ خدمت کو بہت بڑھائے اور اللہ تعالیٰ انہیں وہاں اپنی امان میں رکھے اور امان میں رکھے ہم سب کو جہاں بھی ہم ہوں اور خیریت سے ان کو واپس لائے اور ایک پیار کرنے والے ہمدرد اور غم خوار طبیب حاذق کی طرح انہیں اپنوں اورغیروں کی خدمت کی توفیق ملے۔
    اب میں دُعا کروں گا آپ بھی دُعا کریں اللہ تعالیٰ ہر طرح ان کے سفر کو بابرکت کرے۔آمین
    (از رجسٹر خطباتِ ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز

    ہمارے پاس ایک عمدہ پریس
    اور ریڈیو سٹیشن ہونا چاہئے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۹؍ جنوری ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور نے مندرجہ ذیل آیت قرآنیہ کی تلاوت فرمائی:-
    ِ
    اس کے بعد فرمایا:-
    ایّام جلسہ مہمان نوازی کے ایّام ہیں اکرام ضیف کے ایّام ہیں پھر مہمان بھی وہ جو صرف ہم خدّام کے ہی مہمان نہیں بلکہ خدا اور اس کے رسول (محمد صلی اللہ علیہ وسلم) اور اس رسو ل کے عظیم روحانی فرزند کے مہمان ہیں۔ اللہ تعالیٰ بڑے فضل سے بڑی رحمت سے اہل ربوہ کو یہ توفیق عطا فرماتا ہے کہ وہ ان مہمانوں کی جیسا کہ چاہئے خدمت کریں اور جیسا کہ چاہئے اِکرامِ ضیف کریں۔ مہمان نوازی اور اِکرامِ ضیف کے سلسلہ میں جو کچھ ایامِ جلسہ میں ہوتا ہے اس کی مثال دُنیا میں ہمیں کہیں نہیں ملتی۔ اتنا بڑا اجتماع جو شہر کی آبادی سے بھی چھ سات گنا زیادہ ہوتاہے اور اس لحاظ سے قریباً اوسط یہ بنتی ہے کہ جس گھر کے شیر خوار بچوں سمیت سات افراد ہیں بہت سارے گھرانے ایسے ہیں جن میں ان سات افرادِ خانہ کے مقابلہ میں چالیس، پچاس اور بعض دفعہ ساٹھ مہمان آجاتے ہیں۔ ایک دفعہ جب مَیں افسر جلسہ سالانہ تھا ایک رپورٹ میرے پاس آئی کہ ایک چھوٹا سا گھر ہے گھر والوں نے صرف ایک کمرہ مہمانوں کے لئے دیا ہے اور پچاس ساٹھ مہمانوں کا کھانا لینے آگئے ہیں حالانکہ اتنے مہمان تو اس کمرہ میں سما ہی نہیں سکتے جب رات کو معائنہ کیا گیا تو معلوم ہوا کہ جتنے مہمانوں کا کھانا انہوں نے لیا ہے اس سے زیادہ مہمان اس کمرہ میں سمائے ہوئے ہیں۔ خدا تعالیٰ کے فرشتے ہی ان مہمانوں کے لئے جگہ بناتے ہیں اور ان کے لئے سیری کا سامان پیدا کرتے ہیں اور ان کے آرام کا خیال بھی رکھتے ہیں اور ان کے اعزاز کا ماحول بھی پیدا کرتے ہیں۔اہلِ ربوہ تو مُفت میں سارا ثواب مہمان نوازی کا لے جاتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ اور بھی زیادہ رحمتوں کا انہیں وارث بنائے اور اللہ تعالیٰ اور بھی زیادہ خدمت ضیف اور اِکرامِ ضیف کی انہیں توفیق عطا کرے۔
    ربوہ کا ماحول جس طرح جلسہ سالانہ کے ایّام میں ظاہری اور باطنی طور پر پاکیزہ اور مطہّر رہنا چاہئے اسی طرح سال کے دوسرے ایّام میں بھی ہمارے ماحول میں کسی قسم کی گندگی اور ناپاکی داخل نہیں ہونی چاہئیے۔ اس میںشک نہیں کہ ربوہ کے مکینوں کی بڑی بھاری اکثریت اس کوشش میں ضرور لگی رہتی ہے کہ ان کا ماحول پاک رہے اور وہ یہ خواہش ضرور رکھتے ہیں کہ جس فضا میں وہ سانس لے رہے ہوں اور جس زمین پر ان کے قدم پڑ رہے ہوں وہ طہارت اور پاکیزگی رکھنے والی اور طہارت اور پاکیزگی اور برکت پہنچانے والی ہو لیکن اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ ربوہ میں رہنے والوں میں سے بعض ان ذمّہ داریوں کا خیال نہیں رکھتے جو اللہ تعالیٰ نے ان پر ڈالی ہیں اور جنہیں انہوں نے برضا و رغبت قبول کیا ہے کسی کے لئے یہ ضروری نہ تھا اور نہ اب ضروری ہے کہ وہ ربوہ میں ہی رہائش رکھے لیکن سارے ہی بظاہر اور ان میں سے بڑی بھاری اکثریت حقیقتاًبھی برضا و رغبت اور اس ذمّہ داری کو سمجھتے ہوئے اور اسے قبول کرنے کے لئے تیار ہو کر ربوہ میں رہائش پذیر ہے۔ اہلِ ربوہ نے جو ذمّہ داری برضا و رغبت اپنے اُوپر لی ہے اگر ان میں سے ایک فیصد یا نصف فیصد یا چوتھائی فیصد ایسے گھرانے ہوں جنہیں اپنی ذمّہ داریوں کا یا تو علم نہ ہو یا اپنی ذمّہ داریاں نباہنے کی طرف انہیں توجہ نہ ہو تو اس کے نتیجہ میں انہیں یہ نہ سمجھ لینا چاہئے کہ ہم اس کو برداشت کر لیں گے۔
    جو آیت میں نے ابھی پڑھی ہے اس میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ بعض عذاب اور ابتلاء اور مصائب اور آفتیں دُنیا پر ایسی بھی نازل کی جاتی ہیں کہ ان کی لپیٹ میںصرف ظالم ہی نہیں آتا بلکہ وہ لوگ بھی آجاتے ہیں جن کا بظاہر اس ظلم میں کوئی حصہ نہیں یعنی صرف ظالم کو وہ آفت یا بلاء یا عذاب نہیں پہنچتا بلکہ دوسرے بھی اس کی لپیٹ میں آجاتے ہیں۔ اصول تو ہمیں یہ بتایا گیا تھا کہ
    لَا تَزِرُ وَازِرَۃٌ وِّزْرَ اُخْرٰی (الانعام:۱۶۵)
    کوئی جان دوسری جان کا بوجھ نہیں اُٹھائے گی لیکن چونکہ یہ دُنیا دار الابتلاء ہے دارالجزاء نہیں۔ اس آیت میں یہ بیان فرمایا کہ اس ابتلاء اور عذاب میں وہ لوگ بھی شامل ہو جائیں گے۔ یہ ابتلاء اور عذاب ان لوگوں کو بھی پہنچے گا جو ظالم نہیں ہیں اور قرآن کریم کے متعلق یہ اصول یاد رکھنا چاہئے کہ اس کی آیات باہم تضاد نہیں رکھتیں۔ لہٰذا ہمیں اس آیت کے ایسے معنی کرنے پڑیں گے جو کسی دوسری آیت سے ٹکراتے نہ ہوں ان کے متضاد نہ ہوں پس یہاں ایک معنی یہ ہوں گے کہ گو ظاہری طور پر وہ لوگ ظلم میںشامل نہیں لیکن باطنی طور پر وہ ظلم میں شامل ہیں اور وہ اس طرح کہ بعض ذمہ داریاں افراد سے تعلق رکھتی ہیں۔ وہ انفردی ذمہ داریاں ہوتی ہیں اور بعض ذمہ داریوں کے بہت سے پہلو یا وہ ساری کی ساری اجتماعی رنگ رکھتی ہیں اور جو اجتماعی ذمّہ داریاں ہیں اگر وہ گروہ یا وہ خاندان جن کی وہ ذمہ داریاں ہیں بحیثیت مجموعی ان کی طرف متوجہ نہ ہوں اور اِس کے نتیجہ میں اس گروہ یا خاندان کے بعض افراد ظالم بن جائیں تو سزا اور عذاب میں سارا خاندان ہی ملوّث ہو جائے گا۔ دُنیا کی نگاہ تو یہ دیکھے گی کہ ایک پندرہ سالہ بچے نے چوری کی مگر اللہ تعالیٰ کی نگاہ یہ دیکھتی ہے کہ اس کے ماں اور باپ بہن اور بھائیوں اور خاندان کے دوسرے بڑے رشتہ داروں پر جو یہ فرض تھا کہ وہ اس پندرہ سالہ معصوم بچے کی صحیح تربیت کریں وہ تربیت انہوں نے نہیں کی جس کے نتیجہ میں وہ چور بن گیا۔پس دُنیا کا قانون تو صرف اس بچے کو سزا دے گا مگر اللہ کا قانون اُس دُنیا میں بھی اور اِس دُنیا میں بھی صرف اس بچے پر گرفت نہیں کرے گا جس نے چوری کی بلکہ ان پر بھی گرفت کرے گا جن پر اس کی صحیح تربیت کی ذمہ داری تھی لیکن انہوں نے اپنی یہ ذمہ داری ادا نہیں کی اگر وہ لوگ اس کی صحیح تربیت کی ذمہ داری کی طرف کماحقہ، متوجہ رہتے تو ان کا بچہ چور نہ بنتا اسی طرح اگر بعض خاندانوں کے بچوں کو گندی گالیاں دینے کی عادت ہے تو صرف ان بچوں پر گرفت نہیں کی جائے گی بلکہ ان کے ماں باپ اور دوسرے ذمہ دار رشتہ داروں پر بھی گرفت کی جائے گی جن پر یہ فرض تھا کہ اپنے قول، فعل اور نمونہ کے ساتھ اُن کی صحیح تربیت کرتے اگر اہل ربوہ میں سے ایک آدھ ایسا نوجوان ہو جو نظامِ سلسلہ کا وہ احترام نہیں کرتا جو ہر احمدی کو کرنا چاہئے (اور احمدیوں کی بہت بھاری اکثریت یہ احترام کرتی ہے) تو اس صورت میں اگر اصلاح کی خاطر ربوہ سے باہر بھجوانے کا فیصلہ ہوا تو صرف بچہ کو ہی نہیں بلکہ اس کے ماں باپ اور دوسرے رشتہ داروں کو بھی ربوہ سے باہر جانا ہوگا۔
    دو تین سال ہوئے دو ایک نوجوانوں کو ان کی اصلاح کی غرض سے ربوہ سے باہر بھجوایا گیا تو وہ باہر یہ شور مچاتے رہے کہ ہمیں خواہ مخواہ ربوہ سے نکال دیا گیا ہے اور ان کے ماں باپ یہاں شور مچاتے رہے کہ ہمارے بچوں کو خواہ مخواہ ربوہ سے نکال دیا گیا ہے پس ہم ایسے کمزور ایمان والوں اور بُزدلوں سے دو جگہ کیوں شور مچوائیں وہ ایک ہی جگہ شور مچائیں بہتر تو یہ ہے کہ وہ یہاں رہیں اور اخلاص سے رہیں اور اگر یہاں سے جانا ہو تو سارا خاندان یہاں سے جائے صرف بچوں کو ہی باہر کیوں بھیجا جائے۔
    میں سمجھتا ہوں کہ یہ بچے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسّلام کے بچے ہیںجو ماں باپ ان کی صحیح تربیت نہیں کرتے وہ بڑے ہی ظالم ہیں۔ ظاہری آنکھ ان کے ظلم کو نہیں دیکھتی وہ صرف بچہ کی حرکت کو دیکھتی ہے وہ ایک بچہ کو کوئی چیز اُٹھاتے دیکھتی ہے وہ اسے آوارہ پھرتے دیکھتی ہے یا کان کسی بچہ کی زبان سے گندی گالیاں سُن رہے ہیں لیکن ایک مومن کی فراست اور خدائے علّام الغیوب کا علم ان ماں باپ اور دوسرے رشتہ داروں کے اندر بھی ظلم اور گند دیکھ رہا ہے جن پر اس کی تربیت میں حصہ لینا فرض تھا اور جن پر اللہ تعالیٰ کی غصہ کی نگاہ ہو جنہیں اللہ تعالیٰ گندہ اور ظالم پائے ان کو ہم عاجز بندے اصلاحی تدبیر کے بغیر کیسے چھوڑ سکتے ہیں۔ خدا تعالیٰ سے زیادہ تو کوئی بندہ کسی پر رحم نہیں کر سکتا ایک ہی ہستی ہے جس کے متعلق یہ کہا جا سکتاہے کہ اس کی رحمت اس کے غضب سے زیادہ ہے اس کی رحمت نے مخلوق میں سے ہر شئے کا احاطہ کیا ہوا ہے اسے گھیرے میں لیا ہوا ہے کسی اور ہستی کے متعلق یہ نہیں کہا جا سکتا پھر جب وہ ہستی جو رحمت محض ہے اور جس نے اپنی رحمت اور پیار کے لئے ہی اپنے بندوں ( انسانوں) کو پیدا کیا ہے کسی میں ظلم دیکھتی ہے جب وہ ہستی کسی میں ناپاکی اور گندگی پاتی ہے تو کسی انسان کا یہ حق نہیں کہ وہ یہ کہے کہ چونکہ ہماری آنکھ نے صرف اولاد میں گند کو دیکھا تھا اور ان کے ماں باپ کی عدم توجہ کو ہماری آنکھ نہیں دیکھ سکتی تھی ہماری ناقص عقل میں وہ نہیں آسکا تھا۔ ہمارے کمزور علم میں وہ بات نہیں آئی تھی اِس لئے ہم ان پر گرفت نہیں کر سکتے۔ یہاں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ بعض ایسے ابتلاء ہوتے ہیں کہ صرف ظالم ہی ان کی گرفت میں نہیں آتے بلکہ تمہاری نگاہ جن کو ظالم نہیں سمجھتی وہ بھی اس کی گرفت میں آجاتے ہیں اور آنے چاہئیں اسی لئے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ
    کُلُّکُمْ رَاعٍ وَ کُلُّکُمْ مَسْئُوْلٌ عَنْ رَعِیَّتِہٖ (بخاری:کتاب النکاح)اِس حدیث میں مَسْئُوْلٌ عَنْ رَعِیَّتِہٖ کے محض یہ معنی نہیں ہیں کہ صرف اللہ تعالیٰ ہی ان پرگرفت کرے گا اور ان سے جواب طلب کرے گا کہ تم کیا کرتے ہو بلکہ مَسْئُوْلٌ عَنْ رَعِیَّتہٖ کا یہ مطلب بھی ہے کہ وہ لوگ جو اللہ تعالیٰ کی طرف سے ذمہ دار قرار دئیے گئے ہیں(مثلاً نظامِ جماعت اور خلیفۂ وقت) وہ بھی اللہ تعالیٰ کی سُنت پر عمل کرتے ہوئے اور اس کے اس خُلق کو اپنے اندر پیدا کرتے ہوئے جواب طلبی کریں گے ان کے سامنے بھی تم مسئول ہو اور تم سے جواب طلبی کی جائے گی۔
    پہلے ایک آدھ خاندان میں بُرائی ہوتی ہے یا ایک آدھ بُرائی ہوتی ہے اگر ساری قوم یا قصبہ اور شہر کے سارے مکین اس کو دیکھ کر اس سے بیزاری کا اعلان نہ کریں اور نفرت کا مظاہرہ نہ کریں تو آہستہ آہستہ اس بُرائی کی بھیانک اور مکروہ شکل اور اس کی ناپاکی نگاہ سے مخفی ہو جاتی ہے اور پھر اور لوگ بھی اس میں ملوّث ہو جاتے ہیں۔ پس ربوہ میں کوئی ایک گھر بھی ایسا نہیں ہونا چاہئے جس میں اس قسم کی ناپاکیاں اور بدیاں اور گند پائے جاتے ہوں اور اگر کوئی ایسا گھرانہ ہوا تو صرف ان معصوم بچوں کو ہی جن پر آپ نے ظلم کیا ہے ربوہ سے باہر نہیں بھیجا جائے گا بلکہ آپ ظالموں یعنی ماں باپ کو بھی ساتھ ہی یہاں سے روانہ کیا جائے گا۔ اس لئے تم اپنی اور اپنے گھر کی فکر کرو۔ ہم بہرحال ربوہ کی پاکیزگی اور اس کے اچھے نام پر کوئی داغ نہیں لگنے دیں گے۔ انشاء اللہ۔ جیسا کہ میں نے بتایا ہے ربوہ میں رہنے والوں کی بڑی بھاری اکثریت ایسی ہے کہ دُنیا کی کوئی چیز اُن کی قیمت نہیں ٹھہر سکتی اگر دُنیا کے سارے ہیرے اور جواہر بھی اکٹھے کئے جائیں تو ہمارے ایک آدمی کی ان سے زیادہ قیمت ہے لیکن ایک بد صورت اور بے قیمت پتھر کو ہم ان جواہرات میں شامل نہیں رکھ سکتے اور میں سمجھتا ہوں کہ اگر کسی وقت ضرورت پڑی تو سارا ربوہ ( ظاہری طاقت کا استعمال مراد نہیں) نفرت کا اس رنگ میں اظہار کرے گا کہ پھر ایسے خاندان کو یہاں رہنا مشکل ہو جائے گا۔
    احمدی مسلمان ایک عجیب قوم ہے جو اللہ تعالیٰ نے غلبۂ اسلام کے لئے پیدا کی ہے لیکن جیسا کہ سُنّتِ الٰہی ہے۔ الٰہی سلسلوں کے ساتھ نفاق لگا رہتا ہے اسی طرح کمزوریٔ ایمان بھی ساتھ لگی ہوئی ہے جہاں تک کمزوری ایمان کا سوال ہے یہ نہ تو بھیانک ہے اور نہ ہمیں اس کی اس لحاظ سے کوئی فکر ہے کہ جماعت میں کوئی خرابی پیدا ہو جائے گی گو ہمیں اس لحاظ سے فکر ہے کہ کمزور ایمان والوں کی تربیت ہونی چاہئے کمزوریٔ ایمان اعتقادی ہو یا عملی صرف اس لئے ہوتی ہے کہ ہم نے ایک شخص کی صحیح تربیت نہیں کی۔ نئے نئے لوگ جو باہر سے آکر جماعت میں شامل ہوتے ہیں یا جو جماعت میں پیدا ہوتے ہیں وہ تربیت کے محتاج ہوتے ہیں اگر ان کی تربیت ہو جائے( اور ضرور ہونی چاہئیے)تو جو حالت زید کی مثلاً احمدیت میں داخل ہونے سے دس سال کے بعد ہوئی ہے وہی حالت آج آنے والوں کی دس سال کے بعد ہو جائے گی۔ نئے آنے والے جو ہمیں کمزور ایمان نظر آتے ہیں دس سال کے بعد ان کے ایمان پختہ ہو جائیں گے کیونکہ ہر چیز کی پختگی وقت کا مطالبہ کرتی ہے مثلاً اگرہم نے صحن میں مٹی ڈال کر اس پر اینٹیں لگانی ہوں تو مٹی ڈالنے کے بعد’’کوٹائی‘‘ کرنی پڑتی ہے یہ نہیں کہ ایک مزدور مٹی ڈالتا جائے اور ساتھ ساتھ ایک معمار فرش لگاتا جائے بعض دفعہ لوگ اس قسم کی غلطی کر جاتے ہیں اس لئے ان کو بعد میں تکلیف اُٹھانی پڑتی ہے کیونکہ اینٹیں بیٹھ جاتی ہیں۔ اس فرش کو پختہ شکل کرنے کے لئے اور اسے اس بوجھ کو سنبھالنے کے قابل بنانے کے لئے جو اس پر اینٹوں کا اور چلنے والوں کا پڑنا ہے وقت کی ضرورت ہوتی ہے اگر فوری طور پر آپ نے مُگدر سے ’’کوٹائی‘‘ کر دی تو شاید وہ فرش ایک دن میں پختہ ہو جائے لیکن اگر آپ نے اسے اپنے قدموں یا اپنے خاندان کے لوگوں، مہمانوں اور دوستوں کے قدموں کی ’’کوٹائی‘‘ پر چھوڑا تو پندرہ بیس دن یا ایک مہینہ لگ جائے گا۔ قدموں کے دباؤ کی وجہ سے آہستہ آہستہ مٹی بیٹھ جائے گی یہ ایک چھوٹی سی مثال میں نے دی ہے لیکن ہر چیز اس دُنیا میں اپنی پختگی کے لئے وقت کی محتاج ہے اور وہ وقت کا مطالبہ کرتی ہے آم کے درخت کو لے لو وہ ایک وقت کے بعد پھل لاتا ہے۔
    ایک احمدی بچہ ایک وقت کے بعد اطفال الاحمدیہ سے نکل کر خدام الاحمدیہ میں داخل ہوتا ہے ایک حافظ قرآن جب قرآن کریم حفظ کرنے لگتا ہے تو اسے پہلے چھوٹی چھوٹی سورتیں حفظ کرائی جاتی ہیں( پتہ نہیں اب بھی یہی طریق ہے یا نہیں) اور اس سے غرض یہ ہوتی ہے کہ تا چھوٹی چھوٹی سورتیں جلدی یاد ہونی شروع ہو جائیں اور پھر بڑی سورتوں کی طرف اسے لایا جائے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اس کے اندر پختگی پیدا ہوتی ہے اور پھر وہ اپنے حافظہ پر زیادہ بھروسہ کرتے ہوئے اور خود اعتمادی کے ساتھ قرآن کریم یاد کرتا چلا جاتا ہے۔ غرض کمزوریٔ ایمان جو احمدیت میں نئے نئے داخل ہونے یا احمدیت میں پیدائش کے نتیجہ میں ہمیں نظر آتی ہے وہ ہم سے تربیت کا مطالبہ کرتی ہے لیکن نفاق ہم سے بیدار اور چوکس رہنے کا مطالبہ کرتا ہے اور چونکہ دُنیا کا قاعدہ یہی ہے کہ پانی ہمیشہ نشیب کی طرف بہتا ہے، زبردست کمزور پر حملہ آور ہوتا ہے اس لئے نفاق کو یا منافق کو اگر موقع مل جائے تو وہ وہاں حملہ کرے گا جہاں اسے کمزوری نظر آئے گی ایک منافق مثلاً امیر جماعت احمدیہ سرگودھا کے پاس جا کر ان کے ایمان پر حملہ نہیں کرے گا بلکہ چک نمبر ۳۵ میں جو ایک نیا نیا احمدی ہوا ہے وہ اس کے پاس جائے گا اور اس پر حملہ آور ہو گا۔
    وہ کمزوریٔ ایمان جو احمدیت میں نئے نئے داخل ہونے کی وجہ سے یا احمدیت میں پیدائش کے نتیجہ میں نظر آتی ہے ہم نے اس کی دو طرح حفاظت کرنی ہے ایک تو ہم ایسے کمزور ایمان والے کو نفاق کے حملہ سے بچا کر اس کی حفاظت کریں گے اور دوسرے آہستہ آہستہ اس کی تربیت کر کے اس کی حفاظت کریں گے ایسے کمزور ایمان والے ربوہ میں بھی ہوتے ہیں باہر سے بعض کمزور لوگ آجاتے ہیں اور ربوہ میں آکر آباد ہو جاتے ہیں ان میں سے بعض کا تو نظارت امور عامہ کو بھی پتہ نہیںلگتا۔ بعض دفعہ بعض نئے احمدی اپنے علاقہ سے گھبرا جاتے ہیں یا انہیں یہاں سہولت ہوتی ہے اس لئے وہ یہاں آکر آباد ہو جاتے ہیں۔ ان لوگوں کی تربیت کی طرف بھی پوری توجہ دینی چاہئے لیکن اگر یہاں آنے سے قبل ان کی تربیت کچھ اِس قسم کی ہو کہ ہمیں یہ خطرہ پیدا ہو کہ ربوہ کے مکینوں کے بچوں پر ان کے بچوں کا بُرا اثر پڑے گا تو پھر صرف ان کے بچے ہی اپنی جگہ پر واپس نہیں بھیجے جائیںگے بلکہ ہم سارے خاندان کو ہی واپس بھیج دیں گے اور ہمارا یہ فعل بغیر کسی غصہ کے ہو گا کیونکہ ابھی ان کی تربیت نہیں ہوئی لیکن اگر کہیں نفاق اس قِسم کا گند پیدا کرے گا تو پھر ہماری طبیعتوں میں غصہ پیدا ہونا تَخَلَّقُوْا بِاَخْلَاقِ اللّٰہِ کے حکم کے ماتحت ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ نے اِس آیت میں جو میں نے شروع میں پڑھی ہے یہ فرمایا ہے کہ اِنَّ اللّٰہَ شَدِیْدُالْعِقَابِ (الانفال:۲۶)اِس آیتِ کریمہ میںہمیں یہ بتایا گیا ہے کہ گو میرے بندے بھی تم پر گرفت کریں گے لیکن میرے بندوں کی گرفت میری گرفت کے مقابلہ میں بہت ہلکی ہوگی خواہ وہ کتنی ہی سخت گرفت کیوں نہ کریں میری گرفت بہرحال ان سے زیادہ ہے کیونکہ میں سب طاقتوں والا ہوں اور میرا عِقاب بندوں کے عِقاب سے بہرحال شدید ہے۔ پس یہاں ہمیں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اللہ تعالیٰ کی سُنّت پر عمل کرتے ہوئے تمہیں بھی اصلاحی تدابیر اختیار کرنی چاہئیں۔ اس کو دُنیا سزا کہتی ہے لیکن ہم اسے اصلاحی تدابیر کہتے ہیں کیونکہ کسی انسان یا کسی مخلوق سے ہماری دُشمنی نہیں سزا کا لفظ بھی ہمیں بُرا لگتا ہے بہرحال الہٰی سنّت کے مطابق ہمیں بھی اصلاحی تدابیر کرنی پڑیں گی۔ اور لفظِ عِقابؔ میں بھی یہی بات ہے کہ تم نے جو کام کیا اس کا بدلہ تمہیں مل رہا ہے لیکن اس کی ذمہ داری نہ اللہ کے بندہ پر ہوتی ہے نہ اللہ تعالیٰ پر ہوتی ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ نے تو انسان کو رحمت کے لئے پیدا کیا ہے اور بڑا ہی بد قسمت ہے وہ انسان جو پیدا تو اللہ تعالیٰ کی رحمت کے لئے ہوا تھا لیکن حاصل کی ہے اس نے اللہ تعالیٰ کی خفگی اور ناراضگی اور غصہ اور عقاب اور عذاب اور سزا۔
    اس آیت سے آگے دوسری آیات میں یہ فرمایا گیا ہے کہ تمہارے اموال اور تمہاری اولاد فتنہ ہیں اور پھر فرمایا ہے کہ اگر تم اس فتنہ سے بچ جاؤ گے تو جو اجر مَیں تمہیں دوں گا وہ بہت بڑا اجر ہے اور اس کا یہ مطلب ہے کہ اس دُنیا میں بھی میرے بندوں کے ذریعہ تمہیں اس کا اجر ملے گا اور اس اجر پر تم خوش ہو گے لیکن یہ اجر میرے اجر کے مقابلہ میں کوئی حیثیت نہیں رکھتا۔ گویا دونوں چیزیں جزا اور سزا ان آیات میں بیان ہو گئی ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے مرکز میں رہنے والوں کو بھی ان آیات میں مخاطب کیا ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ یہ الٰہی سلسلہ جاری ہوا اور تمہیں اللہ تعالیٰ نے ایمان لانے کی توفیق دی۔ لوگوں نے تمہاری بڑی مخالفت کی اور اس مخالفت سے بچنے کے لئے ہم نے یہ انتظام کیا کہ ایک مرکز قائم کر دیا(فَاٰ وٰ کُمْ) اور اس مرکز کے قیام کے ساتھ اَیَّدَکُمْ بِنَصْرِہٖ ہم نے اپنی آسمانی تائیدات سے تمہاری مدد کی اور وَرَزَقَکُمْ مِّنَ الطَّیِّبٰتِ (النحل۔۷۳) تمہارے لئے دُنیوی فوائد کا سامان کیا۔
    الٰہی سلسلے (اسلام کے اندر بھی) جب بھی قائم ہوتے ہوئے اور اسلام بحیثیت مجموعی بھی پناہ کی جگہ بھی ہوتے ہیں اور پناہ کا سبب اور ذریعہ بھی ہوتے ہیں اب ہمارے پاس یہاں ہر طرف سے اطلاع آتی ہے اگر یہاں سے سات سَو میل دُور کوئی ایسا واقعہ ہو جائے جو اپنے حالات کے مطابق یہ مطالبہ کرے کہ ان لوگوں کو پناہ ملے تو فوراً ہمارا آدمی یہاں سے روانہ ہو جاتا ہے۔ پس مرکز پناہ کی جگہ بھی ہے اور پناہ کا موجب بھی ہے اور پھر مرکز الٰہی تائیدات اور آسمانی نشانوں کو جذب کرنے کا ایک مرکزی نقطہ بھی ہے کیونکہ یہاں خلیفۂ وقت ہو گا اور اللہ تعالیٰ کے حضور اس آدمی کی دعائیں پہنچیں گی جس پر اُس نے ذمہ واری ڈالی ہے وہ خدا سے کہے گا کہ میں ایک عاجز انسان ہوں مجھ میں کوئی طاقت نہیں ہے مجھ میں کوئی ہنر نہیں ہے مجھ میں کوئی علم نہیں ہے میرے پاس کوئی سیاسی اقتدار نہیں ہے اور ساری جماعت کی ذمہ واری اے میرے رب! تو نے مجھ پر ڈال دی ہے اگر تیری مدد میرے شاملِ حال نہ ہو تو مَیں توکچھ نہیں کر سکتا جب اس رنگ کی دُعا دوسرے سب دوستوں کی دُعاؤں کے ساتھ مل کر آسمان پر پہنچتی ہے تو اللہ تعالیٰ اس کو قبول کرتا ہے اور جماعت کے لئے حفاظت اور امن اور بہتری اور خوشحالی کے سامان پیدا کرتا ہے۔
    پھر اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ ہم نے تمہارے لئے طیّبات کا سامان پیدا کیا ہے اب اس کے لئے بھی مرکز ہی مرکزی نقطہ ہے کیونکہ مثلاً اگرسرگودھا میں ہمارا ایک ذہین طالب علم، گجرات میں ہمارا ایک ذہین طالب علم، سندھ میں ہمارا ایک ذہین طالب علم، کراچی میں ہمارا ایک ذہین طالب علم، پشاور میں ہمارا ایک ذہین طالب علم یا مشرقی پاکستان میں ہمارا ایک ذہین طالب علم اپنے گھر کے حالات کے لحاظ سے باوجود انتہائی طور پرذہین ہونے کے ترقی نہیں کر سکتا تو وہ مرکز کی طرف رجوع کرتا ہے اور مرکز کی طرف سے اس کی تعلیم کا انتظام کیا جاتا ہے اور اس طرح سارے خاندان کی خوشحالی کا انتظام ہو جاتا ہے۔پس اللہ تعالیٰ نے فرمایا اے مرکز میں رہنے والو! تمہیںاللہ تعالیٰ نے کتنا نوازا ہے کہ اس نے تمہیں امن عطا کیا اور دوسروں کے امن کا ذریعہ تمہیں بنایا اور وہ تمہیں آسمانی نشانات دکھاتا ہے مرکز میں رہنے والے (اگر ان کی آنکھیں ہوں) تو سب سے زیادہ نشانات دیکھتے ہیں اور اِلّا ماشاء اللّٰہ ان کی آنکھیں ہیں۔ ہاں ایک منافق کے متعلق کچھ نہیں کہا جا سکتا بہرحال مرکز میں رہنے والے بہت سی تائیداتِ سماویہ ملاحظہ کرتے ہیں اور اللہ تعالیٰ نے انہیں دوسروں کو نشاناتِ سماویہ دکھانے کا بھی ذریعہ بنایا ہے اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ مَیں نے تمہارے لئے چاروں طرف رزق کے سامان پیدا کر دئیے ہیں میں نے تمہاری دُنیوی اور اخروی خوشحالی کے سامان پیدا کر دئیے ہیںاور تمہاری وجہ سے اور تمہاری قربانیوں اور ایثار کے نتیجہ میں ہم دوسروں کے لئے بھی خوشحالی کا سامان پیدا کرتے ہیں غرض تم پر مرکز میں رہنے کی وجہ سے بہت زیادہ فضل ہوتے ہیں اور اس نسبت سے تمہاری ذمہ داریاں بھی بہت زیادہ ہیں۔ پس تم اپنی ذمہ داریوں کو سمجھو اور اس بات کا خیال رکھو کہ اللہ تعالیٰ کے غصہ اور نفرت اور بیزاری کی صفات کے بعض جلووں میں وہ لوگ بھی آجاتے ہیں جو بظاہر ظالم نہیں ہوتے لیکن اس ظلم کی جسے دُنیا کی آنکھ نہیں دیکھتی آخری ذمہ داری ان لوگوں پر ہوتی ہے اور اللہ تعالیٰ جو علّام الغیوب ہے بظاہر ظالم نظر آنے والے کی نسبت حقیقتاً ظالم بنانے والے سے زیادہ نفرت کرتا ہے۔ غرض تم دوسروں کو ظالم نہ بناؤ اپنی ذمہ داریوں کو سمجھو اور راعی کی حیثیت سے اپنے ماحول میں ایسے حالات پیدا کرو کہ وہ جو تمہاری رعیت ہیں وہ پختگی ایمان اور اعمال صالحہ پر اچھی طرح قائم رہیں اور وہ جماعت کی ذمہ داری اور مرکزِ سلسلہ کی ذمہ داری کو نباہنے والے ہوں ورنہ اللہ تعالیٰ کی گرفت اور اس کے غصہ کی لپیٹ میں صرف وہی نہیں آئیں گے بلکہ اُن کے ساتھ تم جو حقیقتاً ظالم ہو(گو تم بظاہر ظالم نظرنہیں آتے)زیادہ اس عذاب اور اس سزا کی لپیٹ میں آؤ گے اور اللہ تعالیٰ کا غصہ تم پر زیادہ بھڑکے گا۔
    پس اہل ربوہ کو اپنی اونگھ اور نیند سے بیدار ہو جانا چاہئے۔ کوئی ایسی ماں اور کوئی ایسا باپ یہاں نہیں رہ سکتا جو اپنے بچوں کو صحیح تربیت کی ذمہ داری اُٹھانے کے لئے تیار نہیں کیونکہ ہم اس ماحول کو گندہ اور ناپاک نہیں دیکھنا چاہتے۔ ظاہری صفائی کے متعلق تو ہم یہ کہہ کر اپنے دل کو تسلّی دے لیا کرتے ہیں کہ ہمارے پاس دُنیوی اموال نہیں اس لئے ظاہری صفائی اس قدر نہیں ہو سکتی جتنی ہونی چاہئے گو یہ خیال بھی بہت حد تک خام ہے لیکن بہرحال ہم اپنے دلوں کو یہ کہہ کر تسلّی دے لیا کرتے ہیں کہ ہمارے پاس ظاہری اموال نہیں ہیں اس لئے ہم ظاہری صفائی کو اس حد تک نہیں رکھ سکتے گو ہمیں اس طرف بھی توجہ کرنی چاہئے لیکن باطنی صفائی کے متعلق نہ تو کوئی بہانہ ہمارے پاس ہے اور نہ کوئی سمجھدار شخص اس بہانہ کو قبول کرے گا اور مَیں تو یہی کہوں گا کہ تم ظاہری صفائی کا بھی اتنا خیال رکھو کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی کوئی خواہش اور ہمارے رب کریم کا کوئی ارشاد ہمیں کبھی نہ بھولے اور جس قدر ممکن ہو ہم ظاہری صفائی سے تعلق رکھنے والے تمام احکام کو بجالانے والے ہوں اور وہ بیسیوں احکام ہیں لیکن اس سے بڑھ کر یہ ہے کہ تم باطنی صفائی کی طرف توجہ کرو۔
    اللہ تعالیٰ نے ایک نظام کو قائم کیا ہے اور اس لئے قائم کیا ہے کہ ساری دُنیا میں اسلام کو غالب کرے اس لئے قائم کیا ہے کہ تمام بنی نوع انسان کے دلوں میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت قائم اور پختہ کرے اور اس نے ہم پر ذمہ داری عائد کی ہے کہ اگر ہمارے اس ماحول میں یعنی مرکزی ماحول میں کسی منافق کا فتنہ اِس حد تک پہنچ جاتا ہے کہ اُس پر گرفت ہونی چاہئے۔ تو ہم اس کو پکڑیں گے اگر کوئی کمزورایمان والا یا کوئی منافق طبیعت والا یہ سمجھتا ہو کہ مَیں آسانی سے نظامِ سلسلہ کی بغاوت بھی کر سکتا ہوں اور مَیں کسی کی گرفت میں بھی نہیں آؤں گا تو وہ بڑا بیوقوف ہے کیونکہ سب سے بڑی گرفت تو اللہ تعالیٰ کی ہے اس سے وہ بچ نہیں سکتا جو مرضی ہے وہ کرے خواہ وہ دُنیا اور شیطان کی ساری طاقتیں اپنے لئے جمع کرے وہ اللہ تعالیٰ کی گرفت سے کیسے بچ سکتا ہے پھر اس کے بندے جنہیں اللہ تعالیٰ ان الفاظ میں مخاطب کرتا ہے کہ مجھ سے ڈرو اور دُنیا کی کسی اور چیز سے نہ ڈرو وہ کسی اور سے کیسے ڈریں گے اور ان کی گرفت سے اس قسم کا آدمی کیسے بچ جائے گا لیکن جو شخص شیطان کا مرید ہوتا ہے وہ احمق بھی بڑا ہوتا ہے اس لئے اپنی حماقت اور اپنی سفاہت کے نتیجہ میں بعض منافق طبع لوگ سمجھتے ہیں کہ وہ جو مرضی ہے کرتے رہیں انہیں کوئی پوچھے گا نہیں۔ فرض کر لو اگر کوئی آدمی نہ بھی پوچھ سکے تو خدا تو پوچھنے والاہے اس کے غصہ اور اس کی گرفت اور اس کے قہر سے ایسا آدمی کس طرح بچ جائے گا لیکن یہ بھی شیطانی سفاہت ہے اور قرآن کریم نے اس کو حماقت اور سفاہت کہا ہے کہ خدا تعالیٰ کے بندے اس کو نہیں پوچھیں گے دُنیا میں کسی کے گھر میں کوئی ایسا انسان نہیں پیدا ہوا کہ جو سلسلہ عالیہ احمدیہ سے بالا ہو۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے گھر میں کوئی بچہ ایسا نہیں پیدا ہوا جو سلسلہ عالیہ احمدیہ سے بالا ہو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی پہلی نسل کے متعلق اللہ تعالیٰ نے یہ بشارت دی تھی کہ وہ سلسلہ کے انتہائی خادم ہوں گے اور اللہ تعالیٰ ان کی عملی خدمت اور ان کے خدمت کے جذبات کو دیکھ کر انہیں قوم کا سردار بنا دے گا اور گو اللہ تعالیٰ انہیں قوم کا سردار بنائے گا لیکن وہ اس حقیقت کو نہیں بھولیں گے کہ سردار کہتے ہی اُسے ہیں جو قوم کا خادم ہو آپ دوست جانتے ہیں کہ ہمارے بزرگ بھائی مکرم مولوی محمد یعقوب خان صاحب جنہوں نے تھوڑا ہی عرصہ پہلے بیعت کی ہے جلسہ سالانہ پر آئے تھے۔ اُن کے ساتھ ان کا ایک بچہ (کیپٹن عبدالسلام خان صاحب) بھی تھا اس وقت تک اُنہوں نے بیعت نہیں کی تھی جلسہ سالانہ کے بعد اُنہوں نے بھی بیعت کر لی ہے اور اب اطلاع آئی ہے کہ مولوی صاحب موصوف کی بیوی نے بھی بیعت کر لی ہے۔ اس وقت تک مکرم مولوی یعقوب خان صاحب، ان کی بیوی اور ان کے دو بچوں نے بیعت کر لی ہے ایک بچے نے ابھی تک بیعت نہیں کی عبدالسلام خان صاحب کا خط آیا ہے کہ مَیں نے ان سے بڑی لمبی باتیں کی ہیں وہ ساری باتیں مانتا ہے لیکن اس کے دُنیوی تعلقات کچھ اِس قسم کے ہیں کہ وہ ابھی بیعت کرنے سے گھبراتا ہے دُعا کریں کہ اللہ تعالیٰ اس کو بھی بیعت کرنے کی توفیق عطا کرے تا سارا خاندان اکٹھا ہو جائے۔
    محترم مولوی محمد یعقوب خان صاحب اور ان کے دو صاحبزادوں نے پہلی دفعہ ہمارا جلسہ سالانہ دیکھا تھا پہلی دفعہ انہوں نے اس فضا میں سانس لیا لوگوں کے چہروں پر ایمان کی شادابی دیکھی مجھ سے ملے احباب جماعت کے لئے جو میرے جذبات ہیں اُن کو محسوس کیا تو جلسہ کے بعد عبدالسلام خان صاحب مجھے ملے ان سے رہا نہ گیا وہ کہنے لگے کہ لوگ اعتراض کرتے ہیں کہ گدّی بنا لی ہے(یہ الفاظ تو میرے ہیں لیکن ان کے دماغ میں یہی تھا کہ غیر مبائع اعتراض کرتے رہتے ہیں کہ انہوں نے گدّی بنا لی ہے۔ چنانچہ انہوںنے کہا کہ لوگ کہتے ہیں کہ گدّی بنا لی ہے۔ گدّی بنا لی ہے)لیکن میں نے یہاں آ کر جو دیکھا ہے اور خلافت کی ذمہ داریاں جو مَیںنے محسوس کی ہیں مَیں اس نتیجہ پر پہنچا ہوں کہ بڑا ہی احمق ہو گا وہ شخص جو خلافت کی خواہش کرے اور یہ ایک حقیقت ہے کون اپنے آپ کو چوبیس گھنٹے کی ذمہ داریوں میں جکڑا ہوا دیکھنا چاہتا ہے لیکن معترض تو اعتراض کرتے ہی رہتے ہیں سمجھدار لوگ یا جب کسی کو اللہ تعالیٰ سمجھ دے دیتا ہے تو وہ حقیقت کو پا لیتے ہیں۔
    پس یہ سمجھنا کہ خلیفۂ وقت اللہ کے سوا کسی اور کے خوف سے دب جائے گا اس سے بڑھ کر کوئی حماقت نہیں جو شخص یہ سمجھتا ہے کہ میرے جسم کے اعضاء بھی سوائے خدا کے اور کسی سے نہیں ڈرتے وہ اپنے متعلق یہ کیسے سمجھ سکتا ہے یا سوچ سکتا ہے کہ کبھی وہ کوئی کمزوری اس سلسلہ میں دکھا سکتا ہے جس نے غیر اللہ سے ایک دمڑی کے ہزارویں حصہ کی بھی کوئی چیز نہ لی ہو اور جس نے ہر چیز صرف اپنے مولیٰ سے حاصل کی ہو اور مولیٰ کی عنایتیں اس پر اتنی ہوں کہ انسانی دماغ ان کا احاطہ نہ کر سکے وہ اللہ کے سوا کسی اور کی طرف متوجہ ہی کس طرح ہو سکتا ہے جو ایسا خیال کرتا ہے اس سے زیادہ بیوقوف اورنادان اور جاہل اور کم علم کوئی ہو ہی نہیں سکتا یہ مختلف صفات جو میں نے بیان کی ہیں یہ مختلف گروہوں کی وجہ سے ہیں کہ بعض لوگ نفاق کی وجہ سے، بعض عدم علم کی وجہ سے اور بعض جہالت کی وجہ سے اس قسم کا خیال کرتے ہیں۔
    اب ہمارے اُوپر بڑی ذمہ داریاں پڑ رہی ہیں میرے ذہن میں پہلے بھی خیال آیا تھا لیکن اب جو مجھے نظر آرہا ہے، دُنیا میں جو کچھ ہونے والا ہے اس سے میں سمجھتا ہوں کہ ہم پر بڑی ذمہ داریاں پڑنے والی ہیں اس لئے ہمیں اپنی کمر کس لینی چاہئے یعنی ہر لحاظ سے ہمیں اپنے آپ کو تیار کر لینا چاہئے اور چوکس ہو جانا چاہئے پہلے ہم بعض چیزوں کو نظر انداز کر جاتے تھے اور دُعائیں کرتے تھے کہ اللہ تعالیٰ اس گند کو دُور کر دے لیکن اب شاید وقت آگیا ہے کہ ہم اس گندکے دور ہونے کے لئے دُعائیں تو کرتے رہیں اور یہ تو ہماری ذمہ داری ہے اس سے تو کوئی شخص یا کوئی خاندان محروم نہیں ہو گا لیکن پہلے وہ ربوہ میں رہتے ہوئے ہماری دُعائیں لیتا تھا اور اب وہ ربوہ سے باہر رہائش اختیار کر کے ہماری دُعائیں لے گا وہ ربوہ میں نہیں رہ سکے گا۔ ربوہ میں وہی رہے گا جو ہر لحاظ سے کوشش کر رہا ہو گا کہ مَیں اپنے خاندان کو اور اپنے ماحول کو ظاہر و باطن میں صاف ستھرا اور پاک اور مطہّر رکھوں گا۔ جس کا اس طرف خیال نہیں ہو گا، جو اپنی یہ ذمہ داری نہیں سمجھے گا۔ ( اللہ تعالیٰ اسے ہدایت دے اور اس کے ایمان کو پختہ کرے) وہ جہاں بھی رہے،رہے، ربوہ میں وہ نہیں رہے گا۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اپنی ذمہ داریوں کو سمجھنے اور ان کے نباہنے کی توفیق عطا کرے۔
    دو باتیں اور ہیں جن کے متعلق مَیں دُعا کے لئے کہنا چاہتا ہوں۔ جلسہ سالانہ سے کچھ روز پہلے(کوئی القاء اور خواب کی صورت نہیں ویسے) بڑے زور سے میرے دل میں یہ خیال پیدا کیا گیا ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ دو چیزیں ہمارے پاس اپنی ہوں۔ ایک تو ہمارے پاس ایک بہت اچھا پریس ہو اور اللہ تعالیٰ جب کوئی خیال پیدا کرتا ہے تو اس کی ساری چیز روشن ہو کر سامنے آجاتی ہے اس لئے جب میرے دل میں خیال آیا تو اس کے ساتھ ہی میرے دماغ میں آیا کہ اس اچھے پریس کے لئے ہمیں پانچ دس لاکھ روپیہ کی ضرورت ہو گی ساتھ ہی میری طبیعت مطمئن ہو گئی کہ ٹھیک ہے گو پانچ یا دس لاکھ روپیہ ایک غریب جماعت کے لئے بڑا خرچ ہے لیکن اس طریق پر اس کا انتظام ہو جائے گا اس وقت پریس نہ ہونے کی وجہ سے ہماری توجہ ہی بہت سے کاموں کی طرف نہیں جاتی کیونکہ روکیں سامنے ہوتی ہیں اور جن کے سپرد یہ کام ہیں وہ ان کی طرف متوجہ ہی نہیں ہو سکتے دوسرے جن کاموں کی طرف توجہ ہوتی ہے ان میں سے بھی بہت سے کام چھوڑنے پڑتے ہیں یا ان میں تاخیر کرنی پڑتی ہے مثلاً اس وقت قرآن کریم کا فرانسیسی ترجمہ تیار ہے ہمارا قرآن کریم کا انگریزی ترجمہ تفصیلی نوٹوں کے ساتھ ایک نئی جلد میں جیسا کہ جلسہ سالانہ پر اعلان ہوا تھا تیار ہو گیا ہے اور دوستوں کے ہاتھ میں آگیا ہے۔ اس وقت فرانسیسی ترجمہ بھی تیار ہے لیکن دفتر سے اس کے متعلق پوچھا تو انہوں نے مجھے رپورٹ دی کہ بات یہ ہے کہ ہمارا خیال تھا ہم نے لاہور کے جس پریس سے انگریزی ترجمہ قرآن کریم کا طبع کروایا ہے اس پریس سے یا کسی اور اچھے پریس سے فرانسیسی ترجمہ بھی طبع کروا لیں گے چنانچہ اُن سے خط و کتابت یا گفت شنید ہو رہی تھی لیکن اب انہوں نے انکار کر دیا ہے اور کہا ہے کہ ہم یہ ترجمہ طبع نہیں کر سکتے مجھے خیال پیدا ہوا کہ ممکن ہے کسی متعصب گروہ کا ان پر دباؤ ہو اور اس سے مجھے بڑا دُکھ ہوا کہ قرآن کریم کے ترجمہ کی اشاعت میں بھی تعصب آجاتا ہے اللہ تعالیٰ ایسے لوگوں پر رحم کرے لیکن بعد میں میں نے پتہ کیا تو معلوم ہوا کہ یہ بات نہیں تھی بلکہ بات یہ تھی کہ انہوں نے کہا کہ فرانسیسی زبان کے بہت سے حروف کی شکل انگریزی حروف کی شکل سے مختلف ہے اور یہ حروف تیار کر کے نہیں دے سکتے۔ اِس لئے انہوں نے انکار کر دیا۔
    پھر ہمارے پاس بعض اوقات مثلاً افریقہ کے کسی ملک سے مانگ آجاتی ہے کہ ہمیں سادہ قرآن کریم(بغیر ترجمہ کے) کے بیس ہزار نسخے اگلے تین ماہ کے اندر دے دو اور کچھ عرصہ پہلے ہمیں ایک ملک سے بارہ یا پندرہ ہزار سادہ قرآن کریم کے نسخوں کا آرڈر ملا اور تحریک جدید کو انکار کرنا پڑا کہ ہمارے پاس موجود نہیں اگر ہمارا اپنا پریس ہو تو اگر اور جب کوئی آرڈر آئے وہ آرڈر تو شاید پندرہ یا بیس یا پچیس ہزار کا ہو گا مگر ایک لاکھ نسخے ہمارے پاس تیار موجود ہوں گے یا ہم اس قابل ہوں گے کہ چند دنوں کے اندر اتنے نسخے شائع کر دیں۔ غرض ہم بہت سارے کام کر سکتے ہیں اور پریس نہ ہونے کی وجہ سے ہم اِس طرف خیال نہیں کرتے ہمارے نزدیک ترجیح مختلف زبانوں میں قرآن کریم کے تراجم کو ہے کیونکہ صحیح ترجمہ اور صحیح تفسیری نوٹ اس وقت خدا تعالیٰ کے فضل سے غیر مسلم دُنیا کو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے علوم سے باہر نہیں مل سکتے اِس لئے ہم ان کو ترجیح دیتے ہیں۔
    پس اگر اپنا پریس ہو گا تو قرآن کریم سادہ یعنی قرآن کریم کا متن بھی ہم شائع کر لیا کریں گے اس کی اشاعت کا بھی تو ہمیں بڑا شوق اور جنون ہے یہ بات کرتے ہوئے بھی مَیں اپنے آپ کو جذباتی محسوس کر رہا ہوں ہمارا دل تو چاہتا ہے کہ ہم دُنیا کے ہر گھر میں قرآن کریم کا متن پہنچا دیں اللہ تعالیٰ آپ ہی اس میں برکت ڈالے گا تو پھر بہتوں کو یہ خیال پیدا ہو گا کہ ہم یہ زبان سیکھیں یا اس کا ترجمہ سیکھیں پھر اَور بھی بہت سارے کام ہیں جو ہم صرف اِس وجہ سے نہیں کر سکتے کہ ہمارے پاس پریس نہیں لیکن میرے دل میں جو شوق پیدا کیا گیا ہے اور جو خواہش پیدا کی گئی ہے وہ یہ ہے کہ سارے پاکستان میں اس جیسا اچھا پریس کوئی نہ ہو اور پھر اس پریس کو اپنی عمارت کے لحاظ سے اور دوسری چیزوں کا خیال رکھ کر اچھا رکھا جائے۔ عمارت کو ڈسٹ پروف (DUST PROOF) بنایا جائے تاہم ایک دفعہ دُنیا میں اپنی کتب کی اشاعت کر جائیں۔
    دوسرے پریس نہ ہونے کی وجہ سے ہمیں کتابیں مہنگی پڑتی ہیں اگر اپنا پریس ہو گا اور اس کو بہرحال نفع کے اصول پر نہیں چلایا جائے گا بلکہ اسے ضرورت پورا کرنے کے اصول پر چلایا جائے گا تو جو کتاب مثلاً قرآن کریم کی ایک جلد اس وقت ہمیں اگر تیس روپے میں پڑتی ہے تو ممکن ہے کہ پھر وہ بیس روپے میں یا پچیس روپے میں پڑ جائے اور جتنی اس کی قیمت کم ہو گی اتنی اس کی اشاعت زیادہ ہو گی یہ اقتصادیات کا ایک اصول ہے پس دُعا کریں کہ جس ربّ نے جو علّام الغیوب ہے دُنیا کی ضرورتوں کو مدِّنظر رکھتے ہوئے اور ان کو پورا کرنے کے لئے میرے دل میں یہ خواہش پیدا کی ہے وہی اپنے فضل سے اس خواہش کو پورا کرنے کے سامان بھی پیدا کرے۔
    دوسری خواہش جو بڑے زور سے میرے دل میں پیدا کی گئی ہے وہ یہ ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ ایک طاقتور ٹرانسمٹنگ اسٹیشن (TRANSMITTING STATION) دُنیا کے کسی ملک میں جماعت احمدیہ کا اپنا ہو اس ٹرانسمٹنگ اسٹیشن کو بہر حال مختلف مدارج میں سے گزرنا پڑے گا لیکن جب وہ اپنے انتہاء کو پہنچے تو اس وقت جتنا طاقتور رُوس کا شارٹ ویو اسٹیشن (SHART WAVE STATION) ہے جو ساری دُنیا میں اشتراکیت اور کمیونزم کا پرچار کر رہا ہے اس سے زیادہ طاقتور اسٹیشن وہ ہو جو خدا کے نام اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی شان کو دُنیا میں پھیلانے والا ہو اور چوبیس گھنٹے اپنا یہ کام کر رہا ہو اس کے متعلق میںنے سوچا کہ امریکہ میں تو ہم آج بھی ایک ایسا اسٹیشن قائم کر سکتے ہیں وہاں کوئی پابندی نہیں ہے جس طرح آپ ریڈیو ریسیونگ سیٹ (RADIO RECEIVING SET) کا لائسنس لیتے ہیں اسی طرح آپ براڈ کاسٹ(BROAD CAST) کرنے کا لائسنس لے لیں وہ آپ کو ایک فری کوئنسی (FREQUENCY) دے دیں گے اور آپ وہاں سے براڈ کاسٹ کر سکتے ہیں لیکن امریکہ اتنامہنگا ہے کہ ابتدائی سرمایہ بھی اس کے لئے زیادہ چاہئے اور اس پر روز مرّہ کا خرچ بھی بہت زیادہ ہو گا اور اِس وقت ساری دُنیا میں پھیلی ہوئی اِس روحانی جماعت کی مالی حالت ایسی اچھی نہیں کہ ہم ایسا کر سکیں یعنی میدان توکھلا ہے لیکن ہم وہاں نہیں پہنچ سکتے۔
    دوسرے نمبر پر افریقہ کے ممالک ہیں نائیجیریا، غانا اور لائبیریا سے بعض دوست یہاں جلسہ سالانہ پر آئے ہوئے تھے غانا والوں سے تو مَیں نے اس کے متعلق بات نہیں کی لیکن باقی دونوں بھائیوں سے مَیں نے بات کی تو انہوں نے آپس میں یہ بات شروع کر دی کہ ہمارے ملک میں یہ لگنا چاہئے اور وہاں اجازت مل جائے گی جس کا مطلب یہ ہے کہ گو پتہ تو کوشش کرنے کے بعد ہی لگے گا کہ کہاں اس کی اجازت ملتی ہے لیکن ان ممالک میں سے کسی نہ کسی ملک میں اس کی اجازت مل جائے گی اور چونکہ ہماری طرح یہ ملک بھی غریب ہیں اِس لئے زیادہ خرچ کی ضرورت نہیں ہوگی شروع میں میرا خیال تھا کہ صرف پروگرام بنا کر اناؤنس کرنے والے ہی ہمیں دس پندرہ چاہئیں پہلے مرحلے میں چاہئے کہ یورپ اور مشرقِ وسطی کی زبانوں میں پروگرام نشر کیا جا سکے اِسی طرح عرب ممالک اور پھر ٹرکی، ایران، پاکستان اور ہندوستان سب اس کے احاطہ میں آجائیں گے، انشاء اللہ۔
    جہاں تک پیسے کا سوال ہے میرے دماغ نے اس کے متعلق اِس لئے نہیں سوچا کہ مجھے پتہ ہی نہیں کہ اس کے لئے کتنے پیسے چاہئیں لیکن جہاں تک اِس بات کا سوال ہے کہ’’کتنے پیسے چاہئیں‘‘ کے متعلق دریافت کیا جائے تو اس کے متعلق مَیں نے انتظام کر دیا ہے۔ جلسہ پر بعض دوست بیرونی ممالک سے آئے ہوئے تھے ان میں سے ایک دوست کینیڈا سے آئے ہوئے تھے وہ وہاں ٹیلی ویژن میں کام کرتے ہیں مَیں نے ان کی ڈیوٹی لگائی ہے کہ وہاں جا کر فوری طور پر اس کے متعلق ضروری معلومات حاصل کریں۔
    پاکستان میں اس اسٹیشن کی اجازت نہیں مل سکتی کیونکہ ہمارا قانون ایسا ہے کہ یہاں کسی پرائیویٹ ادارہ کو ریڈیو اسٹیشن قائم کرنے کی اجازت نہیں لیکن بعض ممالک ایسے ہیں جن میں اس پر کوئی قانونی پابندی نہیں جیسے امریکہ اور بعض ایسے ممالک ہیں جن میں گویا قانونی پابندی تو ہے لیکن اس کی اجازت آسانی اور سہولت کے ساتھ مل جاتی ہے جیسے مغربی افریقہ کے ممالک میں سے نائیجیریا،گیمبیا، غانا یا سیرالیون ہیں اُمید ہے کہ ان ممالک میں سے کسی ایک ملک میں ریڈیو اسٹیشن قائم کرنے کی اجازت مل جائے گی۔
    اِس وقت دُنیا کے دلوں کا کیا حال ہے اس کا علم نہ تو صحیح طور پر مجھے ہے ا ور نہ آپ کو ہے لیکن میرے دل میں جو خواہش اور تڑپ پیدا کی گئی ہے اس سے مَیں یہ نتیجہ نکالنے پر مجبور ہوں کہ اللہ کے علم غیب میں دُنیا کے دل کی یہ کیفیت ہے کہ اگر اللہ اور اس کے محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا نام ان کے کانوں تک پہنچایا جائے تو وہ سُنیں گے اور غور کریں گے ورنہ یہ خواہش میرے دل میں پیدا ہی نہ کی جاتی۔ دوست دُعا کریں کہ اللہ تعالیٰ ایسے سامان جلدی پیدا کر دے دل تو یہی چاہتا ہے کہ اسی سال کے اندر اندر یہ کام ہو جائے لیکن ہر چیز ایک وقت چاہتی ہے بہرحال جب بھی خدا چاہے یہ کام جلد سے جلد ہو جائے اور ہم اپنی آنکھوں سے یہ دیکھیں کہ یہ کام ہو گیاہے اور ہمارے کان چوبیس گھنٹے عربی میں اور انگریزی میں اور جرمن میں اور فرانسیسی میں اور اُردو وغیرہ وغیرہ میں اللہ اور اس کے رسول کی باتیں سُننے والے ہوں گانا وغیرہ بدمزگی پیدا نہ کر رہا ہو اور اسی طرح کی اور فضولیات بھی بیچ میں نہ ہوں ’’علم‘‘ اسلام کا ورثہ ہے کِسی اور کا نہیں اس لئے علمی باتیں تو وہاں ہوں گی مثلاً (ایگری کلچر AGRICULTURE)زراعت کے متعلق ہم بولیں گے اسی طرح دوسرے علوم ہیں ان کے متعلق بھی ہم بولیں گے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے لکھا ہے کہ اسلام کو اللہ تعالیٰ نے یہ طاقت دی ہے کہ وہ تمام علوم سے خادمانہ کام لے سکے سارے علوم ہی ہمارے خادم ہیں۔آج کا فلسفہ بھی ہمارا خادم ہے آج کی سائنس بھی ہماری خادم ہے آج کی تاریخ کے اصول بھی ہمارے خادم ہیں۔ جب یہ غلطی کریں گے تو ہم ان کا ہاتھ پکڑ لیں گے اور خادم سے یہی سلوک کیا جاتا ہے اور اس وقت وہ غلطی کر رہے ہیں اور ہمارا ہاتھ ان کی طرف نہیں بڑھ رہا حالانکہ ہمارا فرض تھا اور ہمارا حق بھی ہے کہ ہم ان کا ہاتھ پکڑ لیں اور کہیں کہ اے ہمارے خادم یہ تو کیا کر رہا ہے (یعنی اس کی تصحیح کریں) بہرحال سب علوم ہمارے خادم ہیں اور ہم ان خادموں سے بھی خدمت لیں گے اور اس طرح سب علوم کی باتیں آجائیں گی فلسفہ کی غلطیاں بھی ہم نکالیں گے( ایگریکلچر AGRICULTURE) زراعت کے متعلق بھی ہم لوگوں کو کہیں گے کہ یہ یہ کام کرو تادُنیا میں بھی خوشحالی تمہیں نصیب ہو۔
    انشاء اللہ یہ کام تو ہم کریں گے لیکن گانے اور ڈرامے اور اس قسم کی دوسری جھوٹی باتیں وہاں نہیں ہوں گی اور اس طرح ایک ریڈیو دُنیا میں ایسا ہو گا جہاں اس قسم کی کوئی لغو بات نہیں ہو گی اور شاید بعض لوگ اس ریڈیو اسٹیشن کو ھُمْ عَنِ اللَّغْوِ مُعْرِضُوْنَ(المومنون:۴)کہنا شروع کر دیں۔
    غرض میرے دِل میں یہ دو خواہشیں پیدا ہوئی ہیں ان کے لئے آپ بھی دُعا کریں اور مَیں بھی دُعا کررہا ہوں۔ انسان بڑا ہی عاجز اور کمزور ہے اور ہر نئی بات جو دل میں ڈالی جاتی ہے وہ ہمارے ضعف اور عاجزی کو اَور بھی نمایاں کر کے ہمارے سامنے لے آتی ہے اور پہلے سے بھی زیادہ انسان اپنے رب کے حضور جُھک جاتا ہے اور اپنی کم مائیگی کا اقرار کرتا ہے اور ہر قسم کی طاقتوں کا اُسے سرچشمہ اور منبع قرار دے کر اور اُس کی حمد وثناء کرتے ہوئے اس سے یہ بھیک مانگتا ہے کہ اے میرے رب تُو نے جو کام میرے سپرد کیا ہے اس کے کرنے کی تُو مجھے توفیق دے اور اس کے لئے اسباب مہیا کر دے۔ آپ بھی دُعا کرتے رہیں کہ اللہ تعالیٰ یہ دونوں چیزیں ہمیں عطا کر دے اور ان دونوں میں ساری دُنیا کے لئے بہت سی برکتوں کا سامان پیدا کر دے۔ (آمین)
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۱۱؍ ستمبر ۱۹۷۰ء صفحہ ۲ تا ۸)
    ززز














    انسان کے اندر اجرِ عظیم یعنی لامتناہی ترقیات
    کی خواہش ودیعت کی گئی ہے۔
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲۳؍ جنوری ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذ اور سورۂ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے یہ آیات تلاوت فرمائیں۔

    اِس کے بعد فرمایا :-
    گزشتہ چند روز میری طبیعت خراب رہی ہے اچانک دورانِ سر کا حملہ ہوا اور وہ اتنا شدید تھا کہ احساس یہ تھا کہ یہ دُنیا اس شدّت اور تیزی کے ساتھ چکر کاٹ رہی ہے کہ جیسے میرے وجود کو باہر پھینکنا چاہتی ہے۔ اور اس کی وجہ سے کافی تکلیف اُٹھانی پڑی۔
    اللہ تعالیٰ نے فضل کیا یہ تکلیف تو چند دن میں دُور ہو گئی۔ لیکن اس کے ساتھ ہی اور پھر اس کے بعد تک خون کے دباؤ میں قرار اور ٹھہراؤ نہ رہا یکدم ۱۲۰ سے ۱۴۵ تک چلا جاتا اور پھر یکدم گر کر ۱۱۰۔۱۱۵ تک آجاتا میرے خون کے معمول کا دباؤ ۱۲۰۔۸۰ ہے اس اُتار چڑھاؤ کی وجہ سے طبیعت میں بڑی بے چینی پیدا ہوتی ہے اور ضعفِ دماغ ہو جاتا ہے کیونکہ دماغ کو باقاعدگی سے ایک جیسا خون نہیں ملتا اب اللہ تعالیٰ کے فضل سے بہت حد تک آرام ہے۔ ضُعف کچھ باقی ہے اللہ تعالیٰ فضل کرے آپ دوست دُعا کریں یہ تکلیف بھی جاتی رہے۔
    بیماری میں ایک اور تکلیف شروع ہو جاتی ہے اور وہ یہ احساس ہوتا ہے کہ کام پیچھے پڑ رہے ہیں میں نے دیکھا ہے کہ اگر کام نہ کروں تو چوبیس گھنٹے کے بعد بے چینی کی کیفیت پیدا ہو جاتی ہے۔ بہرحال کام تو اتنا ہی ہو سکتا ہے جتنے کی اللہ تعالیٰ توفیق دے اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے مجھے بھی اور آپ کو بھی زیادہ سے زیادہ کام کرنے کی توفیق بخشے تاکہ ہم سب اس کی رضا کو زیادہ سے زیادہ حاصل کر سکیں۔
    اللہ تعالیٰ کی رضا کو زیادہ سے زیادہ حاصل کرنے کی خواہش انسان کی فطرت میں ودیعت کی گئی ہے انسان کا نفس کسی ایک جگہ ٹھہرنا پسند نہیں کرتا بلکہ ہر ترقی کے بعد مزید ترقیات حاصل کرنے کی خواہش پیدا ہوتی ہے اور ہر بلندی کے حصول کے بعد مزید رفعتوں تک پہنچنے کی خواہش پیدا ہوتی ہے۔ یہ خواہش اگر صحیح راستے پر گامزن رہے تو اس سے بہتر اور کوئی خواہش نہیں ہو سکتی لیکن اگر یہ خواہش صراط مستقیم سے بھٹک جائے تو پھر اس سے بدتر اور گندی خواہش اورکوئی نہیں ہو سکتی۔
    آپ دیکھتے ہیں کہ اس دُنیا میں بہت سے لوگوں کے دل میں جب اقتدار کی ہوس پیدا ہوتی ہے تو وہ اپنے ماحول میں ہر طریقے سے ظلم کی سب راہوں کو اختیار کر کے اپنا اقتدار اور تسلط جمانا چاہتے ہیں جب انہیں کچھ اقتدار حاصل ہو جاتا ہے تو انہیں مزید اقتدار کی ہوس پیدا ہو جاتی ہے اور اس طرح ظلم میں زیادتی ہوتی رہتی ہے اس طرح دنیا دار لوگوں کے دلوں میں جب دولت کی خواہش پیدا ہوتی ہے تو ان کی یہ بھٹکی ہوئی خواہش ہر بُری اورناپاک راہ کو تلاش کرتی ہے اور ایسے شخص کو اللہ تعالیٰ سے دُور سے دُور تر لے جاتی ہے۔ یہ سب گندگی کے دروازے ہیں جنہیں ہم رشوت کا دروازہ، چوری کا دروازہ، دھوکہ بازی کا دروازہ، جعل سازی کا دروازہ،اور احتکار(مال کو ناجائز طور پر روکے رکھنے) وغیرہ وغیرہ کا دروازہ کہتے ہیں یہ سب دروازے اسی گندی خواہش کے نتیجہ میں کھلتے ہیں۔
    غیر متناہی ترقیات کی خواہش ایک بڑی پاک چیز تھی لیکن جب شیطان نفس کو ورغلاتا اور اسے صراطِ مستقیم سے دُور لے جاتا ہے تو وہی عظیم خواہش جو انسان کی عظمت کے لئے اسے دی گئی تھی وہ اس کی ذلّت اور رسوائی کا سبب بن جاتی ہے بہرحال انسان کے دل میں اللہ تعالیٰ نے یہ خواہش پیدا کی ہے کہ وہ ان رفعتوں کے حصول میں جو اس نے اپنے بندے کے لئے پیدا کی ہیں کسی جگہ پر بھی پہنچ کے مطمئن نہ ہو جائے بلکہ چونکہ قُرب کے غیر متناہی راستے اس کے سامنے کھلے ہوئے ہیں۔ اس لئے وہ ایک رفعت کے حصول کے بعد اس سے بلند تر مقام پر پہنچنے کی کوشش کرے۔ اللہ تعالیٰ کی رضا کے بعض جلووں کے مشاہدہ کے بعد اس کی محبت کے اور بھی روشن تر اور حسین جلوے دیکھنے کی اپنے اندر خواہش پیدا کرے اور ترقیات کے ان غیرمتناہی راستوں پر چلتے ہوئے وہ اپنے رب کے قُرب کو زیادہ سے زیادہ پائے اور وہ اللہ تعالیٰ کی رضا کو زیادہ سے زیادہ حاصل کرے۔
    یہ خواہش جو اللہ تعالیٰ نے انسان کے دل میں پیدا کی ہے اس سے اللہ تعالیٰ نے ہمیں اس طرف متوجہ کیا ہے کہ اگر تم اپنے نفس کا محاسبہ کرو تو تم میں سے ہر ایک شخص یہ جان لے گا کہ اسے اللہ تعالیٰ نے یہ خواہش عطا کی ہے کہ وہ اس کی زیادہ سے زیادہ رضا کو حاصل کر سکے۔
    پس سوال پیدا ہو گا کہ اللہ کی رضا کو اور حقیقی مسرتوں کو اور خوشیوں کو اور کامیابیوں کو زیادہ سے زیادہ حاصل کرنے کا طریق کیا ہے اور وہ کونسی ہستی ہے جو ہمیں زیادہ سے زیادہ عطا دے سکتی ہے؟ چنانچہ ان آیات میں جو مَیں نے ابھی تلاوت کی ہیں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے اِنَّ اللّٰہَ عِنْدَہٗٓ اَجْرٌ عَظِیْمٌ۔ (التوبہ : ۲۲)
    یعنی تمہاری اس خواہش کی تکمیل اس ہستی سے وابستہ ہے جس نے تمہیں پیدا کیا اور تمہاری قوّتوں اور ضرورتوں کا علم رکھتا ہے اور وہ ہر قسم کی قوّت اور قدرت اور تصرّف کا مالک ہے کوئی چیز ایسی نہیں جو اس کے آگے انہونی ہو یا جو اس کی قدرت میں نہ ہو یا جو اس کے تصرف سے باہر ہو وہ اللہ ہے تمام صفات حسنہ سے متصف اور ہر قسم کی کمزوری اور ضعف سے پاک اور مطہر۔ پس تمہاری اس خواہش کی تکمیل کہ تم ترقیات میں، تم رفعتوں کے حصول میں، تم حقیقی عزّتوں کے پانے میں آگے ہی آگے بڑھتے چلے جاؤ سوائے اللہ کے اور کہیں سے نہیں ہوسکتی۔ وہی ہے جو اس خواہش کی تکمیل کر سکتا ہے۔ وہی ہے جس کے قُرب کی راہیں جس کے وصال کی منازل غیر متناہی ہیں۔ ہر منزل کے بعد ایک دوسری منزل، ہر قرب کے بعد ایک ارفع، زیادہ حسین، زیادہ لذّت اور سرور والا قرب کہ جس کی کیفیت ہماری زبان بیان نہیں کر سکتی لیکن بہرحال ہم نے اپنی زبان ہی میں بیان کرنے کی خواہش کرنی ہے تم اس کی توفیق سے یہ ساری چیزیں حاصل کر سکتے ہو۔
    پس وہ جو خود محدود ہے وہ تمہاری اس غیر محدود خواہش کی تکمیل کیسے کر سکتا ہے خود تمہاری عقل اس بات کو تسلیم نہیں کر سکتی کیونکہ یہ دُنیا ایک لامحدود دُنیا ہے دُنیا کے اموال محدود، دُنیا کی عزتیں محدود، دُنیا کے اقتدار محدود، غرض محدود اشیاء ایک غیر محدود خواہش کی تکمیل کر ہی نہیں سکتیں بڑی غیر معقول بات ہو گی اگر ہم یہ کہیں کہ ایک محدود غیر محدود کی تکمیل کا اہل ہے۔
    پس اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ تمہارے اندر غیر محدود اور لامتناہی ترقیات کی خواہش پیدا کی گئی ہے اگر تم اپنی اس فطری خواہش کو پورا کرنا چاہتے ہو تو تمہیں اُس پاک ذات سے تعلق قائم کرنا پڑے گا جو ہر لحاظ اور ہر جہت سے غیر محدود ہے اُس کی حد بست نہیں کی جاسکتی اور وہ اللہ ہے۔
    اِنَّ اللّٰہَ عِنْدَہٗٓ اَجْرٌ عَظِیْمٌ (التوبہ :۲۲)
    وہ اجر جس سے بڑھ کر کوئی اجر متصوّر نہیں ہو سکتا۔ (یہ عظیم کے معنے ہیں) جس کی عظمت اتنی بڑی ہے کہ کوئی اس کے مقابلہ پر نہیں آسکتا۔ وہ جزا وہ کامیابی ۔ کامیابی کی وہ لذّتیں اور سرور کہ جن سے بڑھ کر اور کسی چیز کا امکان نہیں جو ہماری عقلوں میں بھی نہیں آسکتے۔ وہ اجرِ عظیم سوائے اللہ تعالیٰ کے جس کی قدرتوں کی حد بست نہیں کی جا سکتی اور کہیں سے حاصل نہیں ہو سکتا۔
    پس اِنَّ اللّٰہَ عِنْدَہٗٓ اَجْرٌ عَظِیْمٌ۔ (التوبہ : ۲۲) اللہ تعالیٰ ہی کی ذات ہے کہ جس سے ہم غیر متناہی رفعتوں کو حاصل کر سکتے ہیں جو اگر ہم پر رحم کرے، اپنی رضا کی نگاہ ہم پر ڈالے، اپنی رضا کی جنتوں میں داخل ہونے کی ہمیں توفیق دے۔ تو پھر ہمیں اجرِ عظیم مل سکتا ہے۔
    پس اگر انسان نے اجرِ عظیم پانے کی جو خواہش اس کے اندر ودیعت کی گئی ہے اِس خواہش کی تکمیل کرنی ہو تو اس کے لئے ضروری ہے کہ وہ اپنے پیدا کرنے والے رب یعنی اللہ سے ایک حقیقی اور زندہ تعلق قائم کر لے۔ اپنے رب سے یہ زندہ تعلق کیسے قائم کیا جا سکتا ہے اس کا ذکر بھی ان آیات میں کیا گیا ہے لیکن اس وقت میںاس مختصر خطاب پر خطبہ کو ختم کرتا ہوں۔ اللہ تعالیٰ نے زندگی اور توفیق دی تو انشاء اللہ اگلے جمعے میں اس مضمون کے دوسرے پہلوؤں پر بھی روشنی ڈالوں گا۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۲۵؍فروری ۱۹۷۰ء صفحہ ۳، ۴)
    ززز














    محض زبان سے ایمان کا دعویٰ کرنا کافی نہیں
    ایمان لانے کے تقاضوں کو پورا کریں
    (خطبہ جمعہفرمودہ۶؍ فروری ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعدحضورانورنے قرآنِ مجید کی یہ آیات پڑھیں:-

    اس کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    گزشتہ خطبہ میں مَیں نے بتایا تھا کہ انسانی فطرت میں یہ جوش و دیعت کیا گیا ہے کہ وہ لامتناہی ترقیات کی متلاشی رہے۔ کسی ایک جگہ پر ٹھہر جانا اُسے پسند نہیں ہے جب فطرت کا یہ رجحان اور یہ جوش غلط راستہ پر گامزن ہو جاتا ہے مثلاً دُنیوی مال اور دولت کا لالچ پیدا ہو جاتا ہے تو اس قسم کا حریص انسان کسی مقام پر بھی ٹھہرنا پسند نہیں کرتا اگر اس کے پاس لاکھ روپیہ ہو جائے تو وہ کروڑ جمع کرنے کی کوشش کرتا ہے اگر سو انسانوں کا خون ُچوس کر اس نے روپیہ جمع کیا ہو تو اس کی کوشش ہوتی ہے کہ مَیں ہزار انسانوں کا خون چوسوں اور اپنی دولت میں زیادتی کروں۔ بہرحال یہ حرص بڑھتی چلی جاتی ہے یہاں تک کہ اِس دُنیا کی یا اُس دُنیا کی ہلاکت تک اس شخص کو پہنچا دیتی ہے۔
    اگر اقتدار کا جنون سوار ہو تو ایسا انسان تمام حقوق پا مال کرتا چلا جاتا ہے اور کہیں اسے قرار نہیں آتا لیکن جب فطرت صحیحہ ہو اور حقیقی خوشی اور لذت اللہ تعالیٰ کے قرب میں پائی جائے توانسان یہ خواہش رکھتا ہے کہ وہ اللہ تعالیٰ کا زیادہ سے زیادہ قُرب حاصل کرتا چلا جائے۔ دُنیا کی دولتیں اور دُنیا کی جاہ و حشمت تو محدود ہیں لیکن اللہ تعالیٰ کے قُرب اور اللہ تعالیٰ کی محبت کے جلوے غیر محدود ہیں کسی جہت سے بھی اُن کا احاطہ اور ان کی حد بست نہیں کی جاسکتی۔ پس جس وقت انسان روحانی میدانوں میں اللہ تعالیٰ کی طرف حرکت کرتے ہوئے اس کے قُرب کے حصول کے لئے بڑھ رہا ہوتا ہے تو یہی کوشش ایسی ہوتی ہے کہ جو فطرت کے اس تقاضا کو پوری کر سکے کہ اُسے غیر متناہی ترقیات چاہئیں اور اُسی کی جستجو میں وہ ہمہ وقت مشغول رہے اِس لئے اللہ تعالیٰ نے ان آیات کے آخر میں یہ فرمایا ’’اِنَّ اللّٰہَ عِنْدَہٗٓ اَجْرٌ عَظِیْمٌ‘‘(التوبۃ:۲۲) کہ اللہ تعالیٰ ہی کی ذات ایک ایسی ذات ہے کہ جب وہ اجر دینے لگے نیکیوں کا، جب قبو ل کرنے لگے تمہارے مجاہدات کو تو وہ اجر اتنا عظیم ہو گا کہ اس سے بڑھ کر کوئی اجر تصور میں نہیں آسکتا۔غرض اِن آیات میں ہمیں یہ بتایا گیا ہے کہ اگر تم اپنی فطرت کی اِس خواہش کو، اِس Urge(ارج) کو پورا کرنا چاہتے ہو کہ غیر متناہی خوشیاں، غیر متناہی لذتیں، اللہ تعالیٰ کی غیرمتناہی (نہ ختم ہونے والی) رضا تمہیں حاصل ہو تو یہ چیزتمہیں صرف اللہ سے مل سکتی ہے، اس کی طرف تم رجوع کرو اگر تم بھٹک گئے، اگر تم نے صراط مستقیم کو چھوڑ دیا، اگر تم اس خواہش کو نہ سمجھے اور اس کی سیری کے لئے صحیح کوشش نہ کی تو دُنیا کی حرام کمائی بہت حد تک تمہیں مل جائے گی مگر وہ عظیم نہیں ہو گی۔ دُنیا کا اقتدار بھی شاید تم پا لو ایک وقت تک لیکن ہمیشہ کے لئے اور دُنیوی لحاظ سے بھی ایسی عزت تمہیں نہیں ملے گی کہ جو اتنی بڑی ہو کہ اس سے بڑھ کر تصور میں نہ آسکے وہ عزت، پیار کا وہ مقام اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں محبت کے جلوے جو نہ ختم ہونے والے ہیں یہ ابدی اور لامتناہی اجر تم اللہ تعالیٰ کی آنکھ میں محبت کے جلووں ہی میں دیکھ سکتے ہو کہیں اور تمہیں نہیں مل سکتا۔
    پس اجرِ عظیم کی خواہش انسان کے دل میں ہے اجرِ عظیم کا حصول انسان کے لئے ممکن قرار دیا گیا ہے اور اجر عظیم اللہ کے در کے سوا کہیں اَور سے مل نہیں سکتا اس لئے اس در پر دُھونی رما کر بیٹھ جانا چاہئے وہیں سے ہمیں یہ اجر مل سکتا ہے۔ اس اجر کے حصول کے لئے اللہ تعالیٰ نے تین باتیں ان آیات میں بیان کی ہیں ایک ایمان، ایک ہجرت اور ایک مجاہدہ اور ان کے مقابلہ میں تین فضل اور تین قِسم کے انعام کا ذکر کیا ہے رحمت، رضوان اور جناتِ نعیم کا۔ ایمان ایک عام لفظ ہے یعنی بڑا وسیع ہے اتنا وسیع کہ اسلام کے ہر حکم پر اس نے احاطہ کیا ہوا ہے ایمان کس پر لانا ہے اور ایمان کے تقاضے کیا ہیں اس کا تفصیل سے قرآن کریم میں ذکر پایا جاتا ہے اور ایمان کے مقابلے میں جو انعام رکھا گیا ہے وہ رحمت ہے۔ رحمت بھی اپنی وسعتوں میں بہت شان رکھتی ہے کیونکہ عربی لغت میں ہر قسم کے فضل اور انعام پر رحمت کا لفظ بولا جاتا ہے۔ پس یہ فرمایا کہ تم ایمان لاؤ تمہیں میری رحمت نصیب ہو جائے گی پھر بتایا کہ ایمان جو ہے وہ دو شاخوں میں آگے تقسیم ہوتا ہے ایک کا تعلق ہجرت کے ساتھ ہے اور دوسری کا تعلق مجاہدہ کے ساتھ ہے جس ایمان کا تعلق ہجرت کے ساتھ ہے وہ تقاضا اگر پورا کیا جائے تو اس کے مقابلہ میں جو انعام ملتا ہے وہ رضوانِ الٰہی ہے اور جس ایمان کا تعلق مجاہدہ کے ساتھ ہے اگر اس تقاضا کو پورا کیا جائے تو اس کے بدلے میں جو انعام ملتا ہے وہ جنّاتِ نعیم ہے۔میں نے بتایا ہے کہ ایمان ایک ایسا لفظ ہے جو تمام اسلامی تعلیم پر حاوی ہے اور اس کے ہمیں دو حصے کرنے پڑتے ہیں ایک وہ اعتقادات اور وہ احکام و اوامر جن پر ایمان لانا فرض قرار دیا گیا ہے اور دوسرے اللہ تعالیٰ نے بڑی تفصیل سے قرآن کریم میں یہ بیان کیا ہے کہ ایمان کے تقاضے کیا ہیں اس کے نتیجہ میں اللہ کی کونسی رحمت کے جلوے انسان دیکھتا ہے؟ اسی طرح ہمیں یہ دیکھنا پڑے گا کہ ہجرت کا صحیح مفہوم اور اس کے وسیع معنی جن معنی میں کہ اس کو قرآن کریم اور اسلام نے استعمال کیا ہے وہ کیا ہے؟
    اور تیسرے ہمیں یہ دیکھنا پڑے گا کہ مجاہدہ کسے کہتے ہیں؟ پھر ہمیں سمجھ آئے گا کہ ایمان کے مقابلے میں رحمت کو اور ہجرت کے مقابلے میں رضوان کو اور مجاہدہ کے مقابلے میں جنّاتِ نعیم کو کیوں رکھا گیا ہے۔
    یہ مضمون تو اتنا وسیع ہے کہ اسلام کے سارے احکام سے اس کا تعلق ہے لیکن مَیں اس کا جو پہلا حصہ ہے اُسے ایک خاص مقصد کے پیشِ نظر تفصیل سے بیان کرنا چاہتا ہوں اور وہ ایمان کا یہ حصہ ہے کہ کِن پر اور کس پر ایمان لانے کا حکم ہے جب خالی ایمان اٰمَنُوا یا اٰمِنُوا یا یُؤْمِنُون استعمال ہو تو اس میں ہر اُس چیز پر ایمان لانے کی طرف اشارہ ہوتا ہے جس کا ذکر قرآن کریم کی کسی دوسری جگہ فرمایا ہے۔ قرآن کریم پر جب ہم غور کرتے ہیں تو ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ اس نے ایمان کے لفظ کو(یعنی جن چیزوں پر ایمان لانا ہے) مختلف آیات میں بیان کیا ہے اور وہ یہ ہیں۔سورۂ بقرہ میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:-
    ’’وَلٰـکِنَّ الْبِرَّ مَنْ اٰمَنَ بِاللّٰہِ وَالْیَوْمِ الْاٰخِرِ وَالْمَلٰٓـئِکَۃِ وَالْکِتٰبِ وَالنَّبِیِّنَ‘‘
    (البقرۃ :۱۷۸)
    فرمایا کہ مومنوں کو اللہ پر ایمان لانا چاہئے، یومِ آخر پر ایمان لانا چاہئے، ملائکہ پر ایمان لانا چاہئے، الکتاب پر ایمان لانا چاہئے اور انبیاء پر ایمان لانا چاہئے۔ پانچ چیزوں کا یہاں ذکر ہے سورۂ اعراف میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:-
    قُلْ یٰٓـاَ یُّھَا النَّاسُ اِنِّیْ رَسُوْلُ اللّٰہِ اِلَیْکُمْ جَمِیْعَا انِ لَّذِیْ لَہٗ مُلْکُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِج لَآاِلٰـہَ اِلَّا ھُوَ یُحْيٖ وَیُمِیْتُ فَاٰمِنُوْا بِاللّٰہِ وَرَسُوْلِہِ النَّبِیِّ الْاُمِّیِّ الَّذِيْ یُؤْمِنُ بِاللّٰہِ وَ کَلِمٰتِہٖ وَاتَّبِعُوْہُ لَعَلَّکُمْ تَھْتَدُوْنَ۔‘‘ (الاعراف: ۱۵۹)
    اس آیت میں ایمان باللہ اور ایمان بمحمد صلی اللہ علیہ وسلم کا ذکر ہے۔ ایمان تو اَلنَّبِِیّٖٖن پر بھی لانا ہے دوسری جگہ رُسل پر بھی ایمان لانے کا ذکر ہے لیکن ان انبیاء اوررُسل میں سے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو منتخب کر کے نمایاں طور پر ہمارے سامنے پیش کیا اور کہا کہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر ایمان لانا ضروری ہے۔سورۂ بقرہ میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے :-
    ’’ اَلَّذِیْنَ یُؤْمِنُوْنَ بِالْغَیْبِ‘‘ (البقرۃ:۴)
    کہ اَلْغَیْب پر ایمان لانا ضروری ہے۔سورۂ اعراف میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:-
    ’’وَالَّذِیْنَ ھُمْ بِاٰیٰـتِنَا یُؤْمِنُوْنَ۔‘‘ (الاعراف: ۱۵۷)
    بِاٰیٰاتِ اللّٰہِ ایمان لانا ضروری قرار دیا ہے اور سورۂ نحل میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:-
    ’’ لِلَّذِیْنَ لَایُؤْمِنُوْنَ بِا لْاٰخِرَۃِ مَثَلُ السَّوْئِ۔‘‘ (النحل: ۶۱)
    یہاں یہ حکم دیا گیا ہے کہ آخرت پر ایمان لانا ضروری ہے یہ مَیں آگے جا کر بتاؤں گا کہ یومِ آخر اور آخرت میں کوئی فرق ہے یا نہیںاور اگر ہے تو کیا ہے اگر نہیں پھر توکیوں دو مختلف طریقوں پر ان کو استعمال کیا گیا ہے؟ غرض جب اللہ تعالیٰ نے اَلَّذِیْنَ اٰمَنُوْا کہا تو پہلا مطالبہ یہ کیا کہ وہ لوگ جو اللہ پر ایمان لاتے ہیں وہ لوگ جو یومِ آخر پر ایمان لاتے ہیں وہ لوگ جو ملائکہ پر ایمان لاتے ہیں۔ وہ لوگ جو الکتاب پر ایمان لاتے ہیں۔ وہ لوگ جو انبیاء پر ایمان لاتے ہیں وہ لوگ جو کتب سماوی پر ایمان لاتے ہیں ان کے لئے اسی طرح غیب پر ایمان لانا اور اسی طرح آخرت پر ایمان لانا اسی طرح بِآیات اللّٰہ ایمان لانا بھی واجب قرار دیا گیا ہے۔ پس اٰمَنُوْا میں یہ ساری چیزیں آ جائیں گی۔
    اب جو چیزمیرے نزدیک سمجھنی اور یاد رکھنی ضروری ہے وہ یہ ہے کہ محض زبان سے یہ کہہ دینا کہ ہم اللہ پر ایمان لے آئے یہ کافی نہیں ہے یا محض یہ کہہ دینا کہ ہم یومِ آخر پر ایمان لاتے ہیں یا آخرت پر ایمان لاتے ہیں یہ کافی نہیں ہے۔ محض یہ کہہ دینا کہ ہم تمام رُسل پر ایمان لاتے ہیں کافی نہیں ہے محض یہ کہہ دینا کہ ہم اُن تمام رُسل پر جو اللہ تعالیٰ کی وحی نازل ہوتی ہے اُس پر ایمان لاتے ہیں یہ کافی نہیں ہے محض یہ کہہ دینا کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر ہم ایمان لاتے ہیں(یعنی صرف زبان کا اقرار) یہ کافی نہیں ہے محض یہ کہہ دینا کہ قرآن عظیم پر ہم ایمان رکھتے ہیں یہ کافی نہیں ہے محض یہ کہہ دینا کہ غیب پر ہم ایمان لاتے ہیں یہ کافی نہیں ہے محض یہ کہہ دینا کہ آیات اللہ پر ہم ایمان رکھتے ہیں کافی نہیں ہے تو پھر کیا تقاضا ہم سے کیا گیا ہے؟مطالبہ ہم سے کیا ہے؟ یہ سوال ہوتا ہے مَیں نے بتایا ہے کہ محض زبان کا اقرار کافی نہیں اللہ پر ایمان تب مقبول ہوتا ہے جب اللہ پر ہم وہ ایمان لائیں جس کا قرآن کریم ہم سے مطالبہ کرتا ہے کہ ہم ایمان لائیں کہ اللہ وہ ہے۔ اللہ وہ ہے ۔ اگر ہم اللہ کو ایک ایسی ہستی سمجھیں کہ ساری احتیاجیں اور ضرورتیں صرف اس تک لے کر جانی چاہئیں جیسا کہ قرآن کریم نے کہا ہے تو یہ کافی ہو جائے گا، ایک حصہ اس کا، لیکن اگر ہم کہیں تو یہ کہ ہم اللہ پر ایمان رکھتے ہیں لیکن ضرورت کے وقت ہم قبر کی طرف دوڑیں ضرورت کے وقت ہم کسی صاحبِ اقتدار کی طرف دوڑیں ضرورت کے وقت ہم کسی مالدار کی طرف دوڑیں۔ ضرورت کے وقت ہم کسی ہوشیار سازشی آدمی کی طرف دوڑیں ضرورت کے وقت ہم کسی سفارش کی طرف دوڑیں۔ ضرورت کے وقت ہم رشوت کی طرف دوڑیں اور اس کے ساتھ یہ کہیں کہ ہم اس اللہ پر ایمان لاتے ہیں جسے قرآن کریم نے غنی کہا کہ وہ کسی کا محتاج نہیں اور سارے اس کے محتاج ہیں اور جس کو صَمَدْ کہا ہے تو یہ دعویٰ غلط ہو گا پس ایمان باللہ کا کیا مفہوم ہے؟ قرآن کریم کی اصطلاح میں یہ ہمیں پتہ لگنا چاہئے ورنہ محض یہ کہنا کہ ہم اللہ پر ایمان لاتے ہیں محض یہ کہنا کہ اَشْھَدُ اَنْ لَّا اِلٰـہَ اِلَّا اللّٰہ یہ ہمیں کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکتا۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جب یہ فرمایا کہ جس شخص نے یہ کہا کہ اللہ ایک ہے وہ جنت میں چلا گیا تو اس کا یہ مفہوم نہیں تھا کہ اگر مار گولیتھ یا کسی اور مستشرق معاندِ اسلام نے کتاب پڑھتے ہوئے اَشْھَدُ اَنْ لَّا اِلٰـہَ اِلَّا اللّٰہکہہ دیا تو وہ جنت میں چلا گیا بلکہ مطلب یہ تھا کہ جو شخص یہ گواہی دیتا ہے اپنے دل سے بھی اوراپنی زبان سے بھی اور جوارح سے بھی کہ میَں اس اللہ کو اس طور پر مانتا ہوں جس طور پر اور جس طریقے پر اللہ کو قرآن کریم نے ہمارے سامنے پیش کیا ہے تو جنت میں چلا گیا اور اس میں کوئی شک نہیں کہ پھر وہ جنت ہی میں گیا کیونکہ پھر تو اس کی اپنی زندگی کوئی نہ رہی پھر تو اللہ کے دَر پر بیٹھا اور اپنا سب کچھ دُنیوی اموال بھی اور اپنا نفس بھی اس کے حضور پیش کر دیا اور وہ خالی ہاتھ ہو گیا اور اس نے اپنے رب کو کہا کہ اے خدا! تیری رضا کے لئے مَیں اپنا سب کچھ چھوڑتا ہوں اور تُومیری رُوح کو اپنی محبت اور پیار سے بھر دے۔ پھر وہ اللہ کو ماننے والا بھی ہوا اور اُسی کے لئے’’اَعْظَمُ دَرَجَۃً‘‘ بھی کہا جا سکتا ہے۔
    محض یہ کہنا کہ ہم آخرت پر ایمان لائے ہیں کافی نہیں۔ ہمیں یہ معلوم ہونا چاہئے کہ آخرت کا کیا مفہوم قرآن کریم نے ہمارے سامنے رکھا ہے۔ اس پر ہمارے لئے ایمان لانا ضروری ہے محض یہ کہہ دینا کہ ہم رُسل پر ایمان لائے ہیں یہ کافی نہیں ہے کیونکہ بے چارے معصوم رُسل تو ایسے بھی تھے جن پر ہر قسم کی تہمت ان کے اپنے ماننے والوں نے لگا دی پس ان اشیاء پر، ان تہمتوں پر، ان الزاموں پر، اس افتراء پر ہمارے لئے ایمان لانا ضروری نہیں ہے۔ رُسل پر اس معنی میں ایمان لانا ضروری ہے جو قرآن نے ہمارے سامنے رکھا ہے ان کی وحی پر اس معنی میں ایمان لانا ضروری ہے جو قرآن کریم نے بیان کیا ہے۔حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر ایمان لانا اس معنے میں ضروری ہے اور اس مقامِ ارفع پر ایمان لانا ضروری ہے جو مقام کہ حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں ہمیں بتایا ہے۔ خود قرآن عظیم پر وہ ایمان لانا ضروری ہے جو خود قرآن کہتا ہے کہ مجھ پر اس طرح ایمان لاؤ محض یہ کہہ دینا کہ ہم قرآن کریم پر تو ایمان لاتے ہیں لیکن اپنے اقتصادی مسائل کے حل کے لئے ہم امریکہ جائیں گے تو یہ قرآن کریم پر ایمان کوئی نہیں کیونکہ اگر قرآن کریم پر وہ ایمان ہو جو قرآن کریم کہتا ہے مجھ پر رکھو، جو اللہ تعالیٰ کہتا ہے کہ قرآن کریم پر رکھو تو پھر یہ سوال ہی نہیں پیدا ہوتا اور وہی حقیقی ایمان ہے۔
    قرآن کریم کے متعلق اللہ تعالیٰ نے خود قرآن کریم میں یہ دعویٰ کیا کہ یہ ایک کامل اور مکمل کتاب ہے۔ اگر ہماری زندگی کا کوئی ایسا مسئلہ ہو کہ جس کو سُلجھانے کے لئے ہمیں قرآن کریم کی بجائے امریکہ یا رُوس کے پاس جانا پڑے تو ہمیں یہ اعلان کرنا پڑتا ہے یوں زبان سے نہیں کہیں گے لیکن عملاً ہم یہ اعلان کر رہے ہوں گے کہ (نعوذ باللہ) قرآنِ کریم کامل نہیں، ناقص ہے اور اس نقص کو دُور کرنے کے لئے قرآن عظیم کو چھوڑ کر ہمیں امریکہ جانا پڑا یا روس جانا پڑا۔
    پس قرآنِ عظیم پر محض زبانی ایمان کافی نہیں اس رنگ میں اور اس طور پر ایمان لانا ضروری ہے جو خود قرآنِ عظیم نے کہا ہے کہ اس طرح مجھ پر ایمان لاؤ یہی حال ایمان بالآیات اور ایمان بالغیب کا ہے پس جہاں جہاں بھی ایمان ’’بِالْ‘‘ کا سوال ہے یعنی اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ فلاںپر ایمان لاؤ وہ ہمیں خود قرآن کریم سے تلاش کرنا پڑے گا کہ کس معنے میں یہ کہا گیا ہے کہ ایمان لاؤ۔
    آج میں مختصر ہی خطبہ کرنا چاہتا ہوں اسی تمہید پر ختم کروں گا میرا ارداہ ہے کہ ایمان کی جو تفاصیل ہیں کہ اللہ پر ایمان لاؤ، رُسل پر ایمان لاؤ،غیب پر ایمان لائو اور پھر ان پر جو وحی ہوئی ہے اس پر ایمان لائو، حضرت نبی اکرم صلے اللہ علیہ وسلم پر ایمان لاؤ، قرآنِ عظیم پر ایمان لاؤ، انہیں واضح کروں۔
    لفظ ’’ایمان‘‘ جب عام ہو بغیر صلے کے وہ یہ تقاضا کرتا ہے کہ قرآنِ کریم سے نکال کر دیکھا جائے کہ ان سارے ایمانوں کے کیا معنے ہیں تاکہ ہمارے ایمان میں تازگی اور ہماری رُوح میں بشاشت پیدا ہو۔
    پس انشاء اللہ میں ایمان باللہ سے شروع کروں گا کیونکہ وہی مرکزی نقطہ ہے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے بڑی وضاحت سے بیان کیا ہے۔ اللہ کے لفظ کے اس مفہوم کو سمجھنے کی (جس مفہوم اور معنے میں قرآنِ کریم نے اللہ کے لفظ کو استعمال کیاہے) ایک کنجی اور مفتاح بھی ہمیں دے دی ہے اور یہ ایسی ُکنجی ہے جس سے اَور بہت سے مضامین بھی کُھل جاتے ہیں۔
    میرا ذاتی تجربہ یہی ہے کہ جب قرآن کریم کوئی اصطلاح یا کوئی لفظ استعمال کرے تو خود قرآن کریم میں دیکھو کہ وہ کن معنوں میں استعمال ہوا ہے پس اللہ کو سمجھنے کے لئے قرآن کریم کو شروع سے آخر تک دیکھنا پڑتا ہے کہ اللہ جو اسم ذات باری ہے قرآن کریم کس مفہوم میں اس لفظ کو، اس اصطلاح کو استعمال کرتا ہے یعنی کون سی صفات ہیں جن سے قرآن کریم اللہ کو متّصف کرتا ہے (غرض مختصر ہی مجھے کہنا پڑے گا) یہ مضمون بڑا لمبا ہے لیکن مَیں چاہتا ہوں کہ ایمان کے سارے حصوں کو لے کریہ بتاؤں کہ قرآن کریم نے ان کو کن معنوں میں استعمال کیا ہے اور ہم سے قرآن کریم کیا مطالبہ کرتا ہے اللہ تعالیٰ کیا چاہتا ہے جب وہ یہ کہے کہ ایمان باللہ ہونا چاہئے تو کیا مراد ہے؟ جب وہ یہ کہے کہ ایمان بمحمد صلے اللہ علیہ وسلم ہونا چاہئے تو کیا مراد ہے؟ جب اللہ یہ کہے کہ ایمان بالقرآن ہونا چاہئے تو کیا مراد ہے؟ جب اللہ یہ فرماتا ہے کہ ایمان بالآخرہ ہونا چاہئے تو کیا مراد ہے۔ خود قرآن کریم ہمیں بتائے گا کہ کیا مراد ہے جب وہ ایمان بیوم آخرہو تو اس سے کیا مراد ہے؟ ایمان بآیات اللّٰہ سے کیا مراد ہے؟ جہاں جہاں بھی یہ لفظ استعمال ہوا ہے اس سے مراد کیا ہے؟ اور پھر اس کے بعد مَیں بتاؤں گا کہ ایمان آگے دو شاخوں میں کس طرح تقسیم ہوتا ہے۔ ایک ہجرت جس کے انعام کا ذکر یہاں قرآن کریم نے رضوان سے کیا ہے اور دوسری شاخ مجاہدہ ہے جس کاانعام’’جنّتِ نعیم‘‘میں بیان کیا گیا ہے یہ دونوں دراصل خدا تعالیٰ کی رحمت کے جلوے ہیں اور دونوں کا تعلق جزا کے لحاظ سے رحمت کے ساتھ اور مطالباتِ الہٰیہ کے پورا کرنے کے لحاظ سے ایمان کے ساتھ ہے۔
    پس ایمان ہو اس کے تقاضے پورے کئے جائیں جب اس کے تقاضے پورے کرنے کا سوال پیدا ہو تو وہ اصولی طور پر دو قسم کے تقاضے ہیں ایک کو ہم ہجرت کہتے ہیں ایک کو ہم مجاہدہ کہتے ہیں اور جب ایمان ہو گا اپنے صحیح مفہوم کے ساتھ، تو اللہ تعالیٰ کی رحمت کا نزول ہو گا۔ اللہ تعالیٰ کی رحمت کا نزول دو شکلوں میں ہو گا ایک رضوان کی شکل میں اور ایک جنّتِ نعیم کی شکل میں۔ پس یہ مفہوم ان مختصر سی آیات میں بیان ہوا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے توفیق دی تو اگلے خطبہ سے اس کے اس مضمون کو انشاء اللّٰہ تفصیل سے بیان کروں گا۔ وَمَا تَوفِیقِی اِلَّا ِباللّٰہِ۔
    دوسری بات میں یہ کہنا چاہتاہوں کہ ہمارا ملک اِس وقت ایک نازک دَور میں سے گزر رہا ہے مارشل لاء لگا ہوا ہے اور مارشل لاء نے عوام کو یہ کہا ہے کہ اپنی مرضی سے انتخاب کرو جس میں کوئی دباؤ نہ ہو یا کوئی لالچ نہ ہو اور منتخب نمائندے پھر اس ملک کا دستور بنائیں پھر اس کے مطابق یہاں کی حکومت قائم ہو۔ غرض بہت ہی اچھا کام ہے جو اس مارشل لاء نے کیا لیکن بڑی ذمہ داری عائد کر دی ہے پاکستانی شہری پر اور پاکستانی شہریوں کی اکثریت چونکہ باوجود عقل اور ذہانت رکھنے کے زیادہ پڑھی لکھی نہیں اور مظلوم ہونے کی وجہ سے بیچاروں کے پاس بہت سے ایسے وسائل بھی نہیں ہیں کہ وہ صحیح حالات کا پتہ لے سکیں اس لئے جو مختلف نعرے لگائے جاتے ہیں اُن سے کوئی دماغ کسی نعرہ سے مرعوب ہو جاتا ہے کوئی دوسرا دماغ کسی دوسرے نعرہ سے مرعوب ہو جاتا ہے اور حکومت جو آگے قائم ہونے والی ہے اور پاکستان ہمارا ملک جو ہے اور پاکستانی ہمارے شہری جو ہیں ان کے متعلق کچھ سمجھ نہیں آرہا کہ کس جہت کی طرف ان کی سیاسی حرکت ہو گی۔چونکہ ہر حرکت اور ہر سکون اللہ تعالیٰ کے حکم اور منشاء سے ہی ہوتا ہے اس لئے ہم سب احمدیوں کو اپنے رب کے حضور عاجزانہ جُھک کر اس سے یہ دُعا کرنی چاہئے کہ اے ہمارے رب! ہمارے ملک اور ہماری قوم پر رحم کر اور ان کی ہدایت کے سامان پیدا کر اور ان کو وہ راہ دکھا جو ایک شاند ار اور پُر امن اور تیرا اطاعت گزار ملک بننے کی راہ ہو۔ تیری رضا کو بھی وہ حاصل کریں اور اس دُنیا میں جو نعمتیں اپنے فضل سے تُو نے اپنے بندوں کے لئے پیدا کی ہیں اُن نعمتوں سے سارے کے سارے مِل جُل کر زیادہ سے زیادہ فائدے اُٹھانے والے ہوں اور تیری حمد کرنے والے ہوں پس یہ دُعائیں آجکل بڑی کثرت سے کریں۔ اللہ تعالیٰ اپنا فضل فرمائے۔آمین (روزنامہ الفضل ربوہ یکم اکتوبر ۱۹۷۰ء صفحہ ۲ تا ۶)











    ہمیں چوکس اور بیدار رہ کر اپنے وعدوں کو پورا کرنا
    اور بجٹ کے مطابق مالی جہاد میں حصہ لینا ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۲۷؍ فروری ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    گو پہلے سے تو افاقہ ہے لیکن ابھی تک میری طبیعت خراب چلی جا رہی ہے۔ ضعف کی شکایت دُور نہیں ہو چکتی دوست دُعا کریں اللہ تعالیٰ اپنا فضل کرے اور کامل صحت عطا کرے تا پوری توجہ سے کام کئے جا سکیں۔
    اس وقت مَیں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ جماعت کا مالی سال ختم ہونے والا ہے۔ چند مہینے باقی رہ گئے ہیں اس لئے جماعتیں اس طرف پُوری اور فوری توجہ دیں اور آمد و خرچ کا جو بجٹ سالِ رواں کے لئے جماعت کے مشورہ سے شوریٰ میں پاس ہوا تھا اس کے مطابق آمد ہو تاکہ اسی کے مطابق پھر خرچ بھی کیا جا سکے۔
    ہم اللہ تعالیٰ کے فضل سے ہی اس کی راہ میں اموال خرچ کرنے کی توفیق پاتے ہیں اللہ تعالیٰ کی توفیق سے مالی جہاد میں جو ہم حصہ لیتے ہیں تو اس میں کوئی نفسانی غرض شامل نہیں ہے صرف اس لئے ہم اللہ تعالیٰ کے حضور اپنے اموال کا ایک حصّہ کاٹ کر رکھتے ہیں تااس کی توحید دُنیا میں قائم ہو، تا حضرت نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت دلوں میں گڑ جائے اور اپنے محسنِ اعظم کو یہ دُنیا پہچاننے لگے اور یہ فریضہ آج صرف جماعت احمدیہ کے سپرد کیا گیا ہے جیسا کہ آج کی دُنیا اس پر شاہد ہے۔
    پس اس عظیم ذمہ داری کو سمجھتے ہوئے اور اس لئے کہ تاہم اس کے بدلہ میں اُن عظیم الشان بشارتوں کے بھی وارث بنیں جو بشارتیں کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ ہمیں دی گئی ہیں۔ ہمیں ہر آن چوکس اور بیدار رہ کر باقاعدگی کے ساتھ اپنے وعدوں کو پورا کرنا چاہئے اور اپنے بجٹ کے مطابق مالی جہاد کے نتائج نکالنے چاہئیں جہاں ہم اپنے اوقات کو اور اپنی عزتوں کو اور اپنے دماغوں کو اور اپنے آراموں کو اور اپنی اولادوں کو اللہ تعالیٰ کے حضور پیش کرتے ہیں وہاں ہم پر یہ بھی لازم ہے کہ اپنے اموال کو بھی اس کی راہ میں پیش کریں۔
    خدا کرے کہ ہماری یہ پیشکش اس کے حضور قبول ہو اور اس کی مقررہ جزا کے ہم وارث ٹھہریں اور اس کے پیار کو ہم پائیں۔(آمین)
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۶؍ مارچ ۱۹۷۰ء صفحہ۳)
    ززز






    ہماری جماعت کے تعلیمی اداروں کا تعلیمی، تربیتی
    اور اخلاقی معیار بہت بلند ہونا چاہئیے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۶؍مارچ ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۂ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    اللہ تعالیٰ کے فضل سے طبیعت پہلے سے بہت اچھی ہے، اَلْحَمْدُ لِلّٰہ لیکن ابھی پورا افاقہ نہیں ہوا اور کل سے نزلے کی بھی شکایت ہو گئی ہے اللہ تعالیٰ فضل کرے دوست دُعا سے مدد فرماویں۔
    اللہ تعالیٰ نے اپنے فضل سے جماعتِ احمدیہ سے بنی نوع انسان کی خدمت کے جو مختلف کام لئے ہیں ان میں تعلیمی خدمت بھی شامل ہے ہماری جماعت کے تعلیمی ادارے تین قسموں میں منقسم ہوتے ہیں ایک تو وہ تعلیمی ادارے ہیں جو پاکستان سے باہر کام کر رہے ہیں دوسرے وہ تعلیمی ادارے ہیں جو ربوہ سے باہر پاکستان میں کام کر رہے ہیں اور تیسرے وہ تعلیمی ادارے ہیں جو ربوہ میں کام کر رہے ہیں۔ بیرونِ پاکستان تعلیمی ادارے جو باقاعدہ ادارے کی شکل میں کام کر رہے ہیں وہ زیادہ تر افریقہ کے ممالک میں ہیں یہ ممالک کئی صدیوں سے سیاسی حالات اور بعض دیگر وجوہ کی بناء پر تعلیم میں بڑے پیچھے تھے خصوصاً ان ممالک کی مسلمان آبادیاں تو تعلیم میں بہت ہی پیچھے تھیں اُس وقت حضرت مصلح موعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے ذہن کو اللہ تعالیٰ نے اس طرف متوجہ کیا کہ ان ممالک کی تعلیمی خدمت بھی کرنی چاہئے چنانچہ مختلف ممالک میں مختلف معیار کے تعلیمی ادارے قائم کئے گئے۔ چھوٹے سکول بھی ہیں بڑے بھی ہیں کئی سیکنڈری سکول بھی ہیں۔ ایک ایک ملک میں ہمارے بیسیوں سکول بھی کام کر رہے ہیں اور اللہ تعالیٰ نے ہر لحاظ سے اس خدمت کو قبول کر کے اس کے بڑے اچھے نتائج پیدا کئے ہیں اور بعض جگہ اگرچہ حکومت تو عیسائیوں کی ہے لیکن وہ عیسائی حکومتیں بھی جماعتِ احمدیہ کی تعلیمی خدمات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہیں اور بڑی ممنون ہیں۔ وہاں کے مسلمانوں کو تو اس سے بہت ہی فائدہ پہنچاہے وہاں جو اساتذہ کام کر رہے ہیں اُن میں پاکستانی بھی ہیں اور مقامی بھی ہیں پاکستان سے جو اساتذہ کام کے لئے وہاں گئے ہیں (اِلَّا مَاشَائَ اللّٰہُ) بڑے اخلاص سے کام کرنے والے، بڑی محبت سے کام کرنے والے اور اپنی اس ذمّہ داری کو سمجھنے والے ہیں کہ ہم استاد ہیں اور اسلام نے استاد کا ایک مقام قائم کیا ہے اُسے ایک عزت عطا کی ہے اور اس پر بڑی بھاری ذمہ داریاں عائد کی ہیں یہ سب ان کے سامنے ہے اور وہ اللہ تعالیٰ کی خوشنودی کے حصول کے لئے اپنی ذمہ داریوں کو نباہتے اور اپنے رب اور اس کی مخلوق کی نگاہ میں عزت کو حاصل کرتے ہیں بعض استثناء ہیں لیکن استثناء پر حکم نہیں لگایا جاتا۔ بڑی بھاری اکثریت اپنی ذمہ داریوں کو سمجھتی اور ان کو ادا کر رہی ہے وہاں جو مقامی اساتذہ ہیں وہ بھی اچھا کام کرنے والے ہیں ان کے دل میں بھی احساس بیدار ہے کہ ہماری قومیں دُنیا کے تعلیمی میدان میں بہت پیچھے چھوڑ دی گئی ہیں اور ہمارا فرض ہے کہ ہم ان کو تعلیم کے میدان میںتو دوسروں کے پہلو بہ پہلو لے جا کر کھڑا کر دیں۔
    کچھ ہمارے تعلیمی ادارے پاکستان میں ہیں اور ربوہ سے باہر ہیں۔ ان کے متعلق مختلف اوقات میں مختلف رپورٹیں آتی رہتی ہیں بعض اچھا کام کر رہے ہیں بعض ایک وقت تک اچھا کام کرتے رہتے ہیں پھر کوئی خرابی پیدا ہو جاتی ہے بعض ایسے بھی ہیں جو مستقل طور پر بڑا اچھا کام کر رہے ہیں ان تعلیمی اداروں کو صحیح طور پر چلانے کی آخری ذمہ داری تو مرکز پر ہے۔
    باہر کے جو تعلیمی ادارے ہیں ان کی ذمہ داری بھی مرکز پر ہے تحریک جدید سے ان کا تعلق ہے۔
    تحریک جدید کا نظام کبھی غلطی بھی کر جاتا ہے لیکن عام طور پر وہ محنت اور توجہ اور ہوش کے ساتھ اور بیداری کے ساتھ اس عام نگرانی اور اساتذہ کے انتخاب وغیرہ کے متعلق جو ذمہ داری ہے اس کو نباہتے ہیں اللہ تعالیٰ انہیں جزائے خیر عطا کرے۔
    جو پاکستان کے تعلیمی ادارے ہیں ربوہ سے باہر یا ربوہ میں قائم ہیں ان کی ذمہ داری نظارت تعلیم پر ہے۔ ربوہ سے باہر کے جو سکول ہیں یا تعلیمی ادارے ہیں میرے نزدیک ان کی عام نگرانی اس طرح پر نہیں ہو رہی جس طرح ہونی چاہئے ہم نے اگر سکول کھولنا ہو تو وہ ہمارے معیار کے مطابق ہونا چاہئے ورنہ وہ ہماری بدنامی کا موجب ہے۔ دُنیا کے معیار کے مطابق نہیں۔ہمارے سکول ہمارے معیار کے مطابق ہونے چاہئیں ہمارا ہر کام ہمارے (یعنی اسلام اور احمدیت) کے معیار کے مطابق ہونا چاہئے یہ بھی ہمارا ایک کام ہے ان ہزاروں کاموں میں سے جن کے کرنے کی ہم اپنے رب سے توفیق پاتے ہیں لیکن ربوہ سے باہر بہت سے تعلیمی ادارے ایسے ہیں جو ہمارے معیار کے مطابق نہیں ہیں اور یہ قابل شرم بھی ہے اور قابل فکر بھی ہے جو ہمارا سکول ہے وہ ہمارے معیار کے مطابق ہونا چاہئے اور اس میں اور غیر میں نمایاں فرق ہونا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ کا ہم سے وعدہ ہے کہ اگر ہم اسلام کی روح کو سمجھتے ہوئے اس کے مطابق اپنی زندگی گزاریں گے تو وہ ہم میں اور غیروں میں ایک فرقان اور ایک امتیاز کو قائم کرے گا۔ یہ امتیاز (ایک فدائی، عبدِرحمن اور ایک ایسے شخص کے درمیان جس کے اندر ایثار اور فدائیت کا جذبہ اور اسلام کی روح نہیں) یہ فرق جو ہے یہ قد کے لحاظ سے یا رنگ کے لحاظ سے یا ناک نقشے کے لحاظ سے نہیں یہ تو اس نور کے لحاظ سے ہے جو ایک باعمل حقیقی اور سچا مسلمان حاصل کرتا ہے اور جو دوسرے کو نہیں ملتا۔ وہ نور مَابِہِ الْاِمْتِیَازْ بنتا ہے اللہ تعالیٰ سے تعلق، ایک انہماک ، ایک فدائیت کہ جو کام بھی ہم نے کرنا ہے چھوٹا ہو یا بڑا وہ اللہ تعالیٰ کو راضی کرنے کے لئے کرنا ہے۔ یہ نہیں کہ ہم نماز تو پڑھیں گے اللہ تعالیٰ کو راضی کرنے کے لئے اور روٹی کھائیں گے کسی اور کو راضی کرنے کے لئے اگر کسی اور کو راضی کرنا ہو تو کمانے پر جتنی اسلامی پابندیاں ہیں پھر تو انسان انہیں چھوڑ دے کیونکہ اسی کے نتیجہ میں روٹی ملتی ہے۔
    ایک احمدی مسلمان نے نماز بھی اللہ تعالیٰ کی رضا کے حصول کے لئے قائم کرنی ہے اور ایک احمدی مسلمان نے اپنے یا اپنی بیوی کے منہ میں لقمہ بھی اللہ تعالیٰ کی رضا کے حصول کے لئے ڈالنا ہے اگر ایسا نہیں تو اس شخص نے احمدیت اور اسلام کی حقیقی روح نہیں حاصل کی اور نہ اسلام کو پہچانا ہے نہ ان مطالبات اور ذمہ داریوں کا احساس اس کے دماغ میں بیدار ہوا ہے جو اس کے اوپر اللہ تعالیٰ کی طرف سے ڈالی گئی ہے۔
    پس ہمارا کام اللہ تعالیٰ کی رضا اور خوشنودی کے لئے ہے خواہ وہ تہجد کی نماز ہو خواہ وہ گھٹیالیاں کا انٹر میڈیٹ کالج ہو یا کہیں پرائمری سکول ہو خواہ وہ بچوں کی قاعدہ پڑھانے والی کلاس ہو یا خدام الاحمدیہ یا انصار اللہ کا تربیتی کورس ہو یا یہاں جو قرآن کریم کی کلاس ہوتی ہے وہ ہو چاہے دھوبی کو کپڑے دینے کا کام ہو یا درزی سے کپڑے سلوانے کا کام ہو سب کام ہم نے اللہ تعالیٰ کی رضا کے لئے کرنے ہیں اگر ہم درزی کو کپڑے سینے کے لئے اس لئے دیتے ہیں کہ اپنے لباس کی نمائش مطلوب ہے تو خداتعالیٰ کا غضب تو ہمیں مل سکتا ہے اس کی رضا نہیں مل سکتی لیکن اگر ہم درزی سے کپڑے اس نیت سے سلواتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے کہا ہے کہ میں نے اے مومنو! تمہارے لئے ان چیزوں کو پیدا کیا۔ اسراف سے بچتے ہوئے افراط و تفریط ہر دو پہلوؤں سے اپنے آپ کو بچاتے ہوئے ان چیزوں کو استعمال کرو میں تمہیں جہاں باطنی حسن دینا چاہتا ہوں وہاں میں تمہیں ظاہری حسن بھی دینا چاہتا ہوں اپنے لباس کو اس نیت سے بنوائو اور پہنو کہ یہ اللہ تعالیٰ کی ایک عطا ہے ہم اس کا شکر ادا کرتے ہوئے یہ لباس بنواتے ہیں۔ ایک شخص دھوبی کو کپڑے عادتاً دیتا ہے ایک دوسرا شخص ہے جو یہ کہتا ہے کہ میرے رب کو نجاست اور گندگی اور میل کچیل پسند نہیں ہے میں اپنے کپڑوں کو صاف رکھوں گا۔ اس نیت کے ساتھ دھوبی کو کپڑے دیتا ہے چنانچہ وہ صاف کپڑے بھی پہن لیتا ہے اور فرشتوں کی دعائیں بھی اسے حاصل ہو جاتی ہیں اور اللہ تعالیٰ کی رحمت بھی اسے مل جاتی ہے۔
    غرض ایک احمدی کا ہر کام اسلام کے معیار پر پورا اترنا چاہئے ورنہ اس کام کے کرنے کا کوئی فائدہ نہیں اس کے نتیجہ میں ہمیں اللہ تعالیٰ کی رضا نہیں مل سکتی۔ پس جو تعلیمی ادارے ربوہ سے باہر ہیں ان کی بھی بڑی سختی سے نگرانی ہونی چاہئے۔ تعلیم کے لحاظ سے بھی اور تربیت کے لحاظ سے بھی ہمارے تعلیمی ادارے اور کسی اور کے تعلیمی ادارے میں نمایاں فرق ہونا چاہئے ورنہ ہم اللہ تعالیٰ کی گرفت میں ہوں گے۔ پھر سب سے زیادہ توجہ ہمیں ان تعلیمی اداروں کی طرف کرنی چاہئے جو ربوہ میں قائم ہیں۔ ان کی مرکزی حیثیت ہے بہت سے دوست کافی مالی بوجھ برداشت کر کے اور تکالیف اُٹھا کر اپنے بچوں کو ربوہ میں تعلیم کے لئے بھجواتے ہیں۔ ان کے دل میں اللہ اور اس کے رسول اور اس مرکز کے لئے جو غلبہ اسلام کے لئے قائم کیا گیا ہے محبت اور پیار ہے وہ چاہتے ہیں کہ اپنے بچوں کو اس دینی ماحول میں پرورش اور تعلیم دلوائیں یہاں وہ اپنے بچے بھیج دیتے ہیں اور خود تکالیف اُٹھاتے ہیں ایسے بیسیوں خاندان ہیں جو بیوی بچوں کو یہاں بھجوا دیتے ہیں اور خود تنگی سے گزارہ کرتے ہیں۔ گھر کا ماحول انہیں میسر نہیں ہوتا یعنی نہ بیوی پاس ہے نہ بچے پاس ہیں لیکن وہ ان تکالیف کو اس لئے برداشت کرتے ہیں کہ وہ چاہتے ہیں کہ ان کے بچے صحیح ماحول میں تربیت اور تعلیم حاصل کریں لیکن مجھے افسوس سے یہ بات کہنی پڑتی ہے کہ یہاں بہت سے اساتذہ ایسے ہیں جو ہمارے تعلیمی اداروں کو ایک کلب سے زیادہ حیثیت نہیں دیتے وہ سمجھتے ہیں کہ مثلاً کالج میں گئے، بیٹھے باتیں کیں اور ایک دوسرے کو ہنسی اور تمسخر کا نشانہ بنایا اور اس طرح اپنا وقت ضائع کیا اور گھروں کو آگئے اور ہر مہینے کے شروع میں پچھلے مہینے کی تنخواہ وصول کی۔ کوئی احساس ہی نہیں میں تو سمجھتا ہوں کہ یہاں بعض ایسے داغ ہیں کہ احمدیت کا معیار تو کیا انسانیت کا معیار بھی انہیں حاصل نہیں ہے اور نظارت تعلیم کو اس بات کی کوئی فکر نہیں اگر کوئی شخص وہ ذمہ داری اُٹھانا نہیں چاہتا جو اسلام اس کے کندھوں پر ڈالتا ہے تو کس نے اسے مجبور کیا ہے کہ وہ ہمارے پاس رہے اور ہمیں کسی نے مجبور نہیں کیا کہ ہم اسے اپنے پاس رکھیں یا تو ایسے اساتذہ تعلیم اور تربیت کی طرف پوری توجہ دیں اور یا وہ کہیں اور چلے جائیں۔ کون ان کو یہاں روکتا ہے لیکن اگر انہوں نے مرکز میں رہ کر اس ذمہ داری کو نباہنے کے لئے خود کو پیش کیا ہے تو انہیں یہ ذمہ داری نباہنی پڑے گی اگر وہ نہیں نباہیں گے تو ہم ان کو باہر بھیج دیں گے۔ کہیں اور جائیں۔ اللہ تعالیٰ نے جس کو پیدا کیا ہے اس کے رزق کا تو وہ ذمہ وار ہے میں یا آپ اس کے ذمہ وار نہیں ہیں لیکن جو ذمہ واری مجھ پر اور آپ(اہلِ ربوہ) پر ہے یہ ہے کہ ہم اپنے ماحول کو علمی لحاظ سے بھی اور اخلاقی لحاظ سے بھی اور تربیتی لحاظ سے بھی اس طرح صاف اور پاک رکھیں کہ ہماری آئندہ نسل اس میں اس رنگ کی تربیت حاصل کرے اور وہ رنگ ان کے اوپر چڑھ جائے کہ جو اللہ تعالیٰ کو پیارا ہے اگر ہم ایسا نہیں کرتے تو خدا تعالیٰ کے سامنے جواب دہ ہیں اور اللہ تعالیٰ کی گرفت بڑی سخت ہوتی ہے۔
    پس یہاں کے جو ادارے ہیں انہیں آج میں تنبیہہ کرنا چاہتا ہوں مثلاً تعلیم الاسلام کالج ہے اس کا تعلیمی معیار بھی گِر گیا ہے اور اخلاقی معیار بھی وہ نہیں رہا جو ہونا چاہئے۔دیر کی بات ہے کالج کے ایک طالب علم کے متعلق ایک محلہ میں شکایت پیدا ہوئی سارا محلہ اکٹھا ہو کر اس کو میرے پاس پکڑ لایا۔ مَیں اس زمانے میں پرنسپل تھا مجھے بہت خوشی ہوئی کہ بیدار جماعت ہے محلے میں ذرا سی غلط بات جو ہوئی ہے تو انہوں نے اس کو برداشت نہیں کیا چنانچہ میں نے سب کے سامنے اس بچے کو بہت سخت سزا دی اس طرح محلے والوں کو بھی یہ تسلی ہو گئی کہ ہماری فضا کو پاک رکھا جائے گا اور سارے ربوہ میں بھی پتہ لگ گیا کہ ایسی حرکت برداشت نہیں کی جاتی۔
    نوجوانی کی عمر میںبچے حماقت کرتے ہیں ان کو یہ پتہ لگ گیا کہ یہاں حماقت سے نہیں عقل اور ہوشمندی سے زندگی گزاری جا سکتی ہے حماقتیں جو ہیں ان کا محاسبہ ہو گا جب تک اس قسم کی فضا نہ پیدا کی جائے کہ ہم گندگی کو اور بداخلاقی کو خواہ وہ کسی نوعیت کی ہو برداشت نہیں کریں گے(اور بد اخلاقی سے مراد یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کے اخلاق کے بغیر کوئی اور خُلق اپنانا یا پسند کرنا یا اپنے ماحول میں پیدا کرنا یا برداشت کرنا) اللہ تعالیٰ کی صفات کے جو جلوے اس کی اس مخلوق میں ظاہر ہو رہے ہیں وہی جلوے اس کے بندوں میں اور ان بندوں کے ذریعہ دوسرں میں ظاہر ہونے چاہئیں۔ پس اگر ہر ایک کو یہ پتہ ہو کہ یہاں وہ خُلق پسندیدہ نہیں سمجھا جائے گا اور اسے برداشت نہیں کیا جائے گا جو اللہ تعالیٰ کے خُلق سے مختلف اور اس کی ضد ہے تو کتنا بیوقوف کوئی نوجوان ہو اس کا دماغ بڑی جلدی اس چیز کو سمجھ لے گا اور پھر کوئی شکایت نہیں پیدا ہو گی۔
    ایک دفعہ کالج کی بات ہے باہر کسی کالج میں(یعنی ہمارا احمدیوں کا کالج نہیں)لڑائی ہوئی پستول چلے کچھ مارے گئے لڑکے گھبرائے کہ جو دشمن ہیں جب ان کو موقع ملا تو وہ ہمارے اوپر اسی طرح وار کریں گے اس قسم کا ایک طالب علم آگیاکہ میںنے Migration (مائیگریشن) کروانی ہے مَیں آپ کے کالج میں آنا چاہتا ہوں مجھے چونکہ اس سارے واقعہ کا پہلے سے علم ہو چکا تھا۔ مَیں نے اس کو بٹھا کر سمجھایا میں نے کہا دیکھو اگر تم نے ہمارے پاس فائدہ اُٹھانے کے لئے آنا ہے تو بڑی خوشی سے آؤ۔ ہم تمہارا خیال بھی رکھیں گے پڑھانے کی بھی کوشش کریں گے تربیت کرنے کی بھی کوشش کریں گے لیکن اگر تم نے ہم سے سزا لینے کے لئے یہاں آنا ہے تو پھر بہتر یہ ہے کہ کسی اور جگہ چلے جاؤ کیونکہ دوسرے کالجوں کی طرح یہ کالج نہیں کیونکہ جب تم غلطی کرو گے بڑی سخت گرفت ہو گی اور کسی ایک لڑکے پر جھوٹا رحم کر کے بیسیوں لڑکوں کے اخلاق کو تباہ نہیں کیا جائے گا وہ کہنے لگا مجھے علم ہے کہ اس کالج کا یہی ماحول ہے آپ تسلی رکھیں میں جب تک یہاں ہوں کوئی شکایت پیدا نہیں ہونے دوں گا چنانچہ وہ سال ڈیڑھ سال تک رہا اور کبھی اس نے ذرا سا بھی موقع نہیں دیا سر اُٹھا کر بات نہیں کرتا تھا اس کو پتہ تھا کہ یہ ماحول ایسا ہے کہ اس کی گرفت بڑی سخت ہوتی ہے اس کا فائدہ مجھے یا آپ کو اس طرح نہیں (ہمیں فائدہ تو ہے کیونکہ ہم اللہ تعالیٰ کی رضا کے لئے جو کام کرتے ہیں اس کا فائدہ ہمیں ملتا ہے وہ فائدہ تو ہے) لیکن صحیح تربیت اور صحیح تعلیم اورپوری طرح ذہنی نشوونما کا پہلا اور اصل فائدہ تو اس کا ہے جس نے تعلیم حاصل کی اور تربیت پائی ہمیں اللہ تعالیٰ ثواب دے گا اگر ہماری نیت ٹھیک ہو اور ہم اس کی رضا کے متلاشی اور اسی پر توکل کرتے ہوں لیکن ہم اللہ تعالیٰ کی رضا کے لئے جو کام کرتے ہیں وہ اس لئے کرتے ہیں کہ جو نوجوان ہیں وہ اپنی تعلیم میں اچھے نکلیں ان کے اچھے اخلاق ہوں وہ دُنیا میں نام پیدا کریں وہ دُنیا بھی کمائیں اور اپنے خاندان کا اور اپنے ملک کا نام بھی روشن کریں۔
    پچھلے سال ہمارے کالج کا (جیسا کہ مَیں نے ابھی بتایا ہے) نتیجہ بہت خراب نکلا تھا اس سال خراب نہیں نکلنا چاہئے اس لئے جو منتظم ہیں یا اُستاد ہیں اُن کو چاہئے کہ (امتحان قریب آرہے ہیں) ابھی سے ایسا انتظام کریں کہ کیفیت اور کمیت ہر دو لحاظ سے ہمارے نتیجے ویسے نکلیں جیسے نکلنے چاہئیں۔ کسی وقت تو تیس چالیس کالجوں میں سے اُوپر کے دس پندرہ لڑکوں میں سے پانچ سات ہمارے کالج کے بھی ہو جایا کرتے تھے یہ صحیح ہے کہ کبھی نسبتاً اچھے لڑکے داخل ہوتے ہیں کسی سال نسبتاً کمزور داخل ہوتے ہیں یہ چکر تو ساتھ لگا ہوا ہے لیکن کبھی پری انجینئرنگ میں، کبھی پری میڈیکل میں، کبھی ایف اے میں، کبھی بی ایس سی میں کوئی نہ کوئی گروہ یا ایک سے زیادہ گر وہ اتنے نمایاں طور پر اچھا نتیجہ نکالتے تھے کہ دُنیا حیران ہو جاتی تھی۔
    غالباً ۱۹۶۱ء۔۱۹۶۰ء کی بات ہے مارشل لاء کی طرف سے اس وقت بھی میڈیکل کالج میں ایڈمنسٹریٹر مقرر تھے۔ چنانچہ داخلے کے وقت ایک ایسے شخص ایڈمنسٹریٹر تھے جن کو ہمارے کالج کا زیادہ پتہ نہیں تھا وہ نمبروں کے لحاظ سے انٹرویو لے رہے تھے۔ پہلا لڑکا جو آیا تو انہوں نے دیکھا کہ تعلیم الاسلام کالج کا ہے جانتے نہیں تھے خیال نہیں کیا، کہ ہو گا کوئی کالج، فرسٹ آگیا ہے لڑکا جب تیسرا لڑکا آیا تو وہ بھی تعلیم الاسلام کالج کا پھر زیادہ توجہ ہوئی لیکن کہاکچھ نہیں پھر غالباً چوتھا لڑکا آیا وہ بھی تعلیم الاسلام کالج کا پھر ان سے رہا نہیں گیا اپنے ساتھیوں سے کہنے لگے یہ کونسا کالج ہے جس کے اتنے اچھے نتیجے نکلے ہیں مجھے نہیں پتہ؟ خیر انہوں نے بتایا کہ یہ کونسا کالج ہے غرض پہلے پندرہ میں سے چھ یا سات لڑکے ہمارے کالج کے تھے اسی طرح کبھی انجینئرنگ کے ساتھ ہو جاتا کبھی بی ایس سی کے ساتھ ہو جاتا تھا اور یونیورسٹی کی فیصد سے کہیں زیادہ فیصد نتیجے نکلا کرتے تھے لیکن پچھلے سال تو یونیورسٹی کی فیصد( جو خود بڑی کم ہے اور گندے کالجوں کی وجہ سے ہی اس کی فیصد گر جاتی ہے) اس سے بھی کم۔
    پس یہ بڑی شرم کی بات ہے اب ایک دفعہ تو ہو گیا کیونکہ ہمیں پتہ نہیں تھا کہ یہاں ہمارے اساتذہ اتنے بھی گر جائیں گے لیکن اب تو پتہ لگ گیا ہے اس لئے اپنے آپ کو درست کریں اپنے کام کی طرف توجہ دیں اور دُعائیں کریں کہ اللہ تعالیٰ آپ کی محنت اور خدمت کو قبول کرے اور نتائج اچھے نکالے۔اگر آپ نہ محنت کریں نہ توجہ دیں نہ ذمہ داریوں کو نباہیں نہ مقبول دُعائیں آپ کی قسمت میں ہوں تو پھر تو ہمیں پتہ لگے گا کہ اللہ تعالیٰ کا منشاء یہی ہے کہ آپ پر گرفت کی جائے( خدا تعالیٰ اپنی گرفت سے ہر ایک کو محفوظ رکھے) لیکن جو میری ذمہ داری ہے وہ میں آج نباہ رہا ہوں اور میں ساری جماعت کے سامنے اساتذہ کو اور استانیوں کو اگرچہ استانیاں تو نسبتاً اچھی ہیں پچھلے سال انہوں نے بہت اچھے نتائج نکالے۔ مردوں کے لئے شرم کی بات تھی کہ لڑکیاں اتنی آگے نکل گئیں لڑکوں سے اور اُستانیاں اتنی آگے نکل گئیں اساتذہ سے لیکن بہرحال ان (اُستانیوں) کو بھی اپنا معیار جو اگرچہ خوشکن ہے اس سے بھی بلند کرنا چاہئے۔ اصل بات تو یہ ہے کہ سوائے حادثہ کے سو فیصدی نتیجہ نکلنا چاہئے۔ حادثات اس زندگی کے ساتھ لگے ہوئے ہیں اس میں شک نہیں لیکن اس میں بھی شک نہیں کہ حادثے کے علاوہ اگر سو فیصد نتیجہ نہیں تو پھر وہ صحیح محنت نہیں ہے۔ کوئی وجہ نہیں ہے کہ کوئی طالب علم فیل ہو اگر کوئی ایسا طالب علم ہے جو پڑھنے کے قابل ہی نہیں تو آپ اس کے ماں باپ کا روپیہ کیوں ضائع کروا رہے ہیں؟ اس کو یہاں سے فارغ کر دیں اس مشورہ کے ساتھ کہ پڑھنے کی بجائے کوئی اور کام کرو لیکن جس کے متعلق آپ یہ اعلان کرتے ہیں کہ یہ اس قابل ہے کہ پڑھے اور پاس ہو وہ اگر پاس نہ ہو تو آپ کا فعل آپ کے قول کے خلاف ہوگا اور جماعت آپ سے گرفت کرے گی۔
    تعلیم الاسلام ہائی سکول اور زنانہ سکول اور کالج تعلیم اور نتائج کے لحاظ سے شاید اتنے بُرے نہیں لیکن تربیت کے لحاظ سے انہیں بھی اور توجہ دینے کی ضرورت ہے یہ صحیح ہے کہ ربوہ کا ماحول خداتعالیٰ کے فضل سے بڑا اچھا ہے لیکن یہ بھی صحیح ہے کہ ہم اس ماحول میں یا اس ماحول کے روشن اور منور چہرہ پر سیاہی کا ایک باریک نقطہ بھی برداشت نہیں کر سکتے اگر ایک آدمی یا ایک بچہ بھی ایسا ہے جس کی صحیح تربیت نہیں تو ہمیں غصہ بھی آئے گا ہمیں فکر بھی پیدا ہوگی ہم اپنی عقل اور سمجھ کے مطابق اصلاح کے لئے کارروائی بھی کریں گے۔ تعلیمی اداروں کے ساتھ یہاں ایک اور ایسی دم بھی لگ گئی ہے کہ بعض دفعہ وہ بھی فکر پیدا کرتی ہے اور وہ وہ پرائیویٹ طلباء ہیں جو تعلیمی ادارے میں داخل نہیں ہوتے لیکن یہاں وہ یا تو اساتذہ کی ٹیوشن لیتے ہیں یا ان کو کوئی اور سہولت ہوتی ہے اور کالج کے ڈسپلن اور ضبط سے بھی وہ باہر ہوتے ہیں اور عام طور پر وہ خدام الاحمدیہ سے بھی چھپے رہتے ہیں اور ان کی صحیح تربیت نہیں ہوسکتی۔
    ابھی چند دن ہوئے ایک شخص کا دعا کے لئے میرے پاس خط آیا اور اس نے اپنا جو پتہ درج کیا تھا (یہیں ربوہ کا رہنے والا ہے) وہ غلط تھا اور اس میں چالاکی کی ہوئی تھی۔ اللہ تعالیٰ نے ہمیں سمجھ دی ہے پھر اللہ تعالیٰ تو اس طرح بھی فضل کرتا ہے کہ اسی دن مغرب کے بعد اس شخص کے متعلق مجھے رپورٹ ملی کہ یہ فلاں جگہ رہتا ہے اور یہ اس کے حالات ہیں اور عشاء کے بعد جب میں اپنی ڈاک دیکھ رہا تھا تو اس میں اسی کا خط اور پتہ کوئی اور لکھا ہوا تھا اور اس شخص نے اپنی طرف سے بڑی چالاکی کی ہوئی تھی کہ میں پتہ غلط لکھ رہا ہوں۔ جب میں نے پتہ لیا تو معلوم ہوا کہ وہ ایف۔اے کا پرائیویٹ امتحان دے رہا ہے پھر میں سمجھا کہ یہ ایک ایسا شخص ہے جس کی تربیت کی طرف کوئی ادارہ توجہ نہیں کر رہا کالج کا یہ طالب علم نہیں ان کے ضبط و نظم سے باہر ہے اور خدام الاحمدیہ سے بھی اسی طرح چھپا پھرتا ہے کیونکہ بعض باتیں اور بھی پتہ لگ گئیں لیکن یہ تو ایک مثال تھی جس نے یہ توجہ دلائی کہ ایک سلسلہ، ایک نظیر ایسے طالب علموں کی ہے جو پرائیویٹ امتحان دیتے ہیں اور اس وجہ سے کالج کے ڈسپلن اور ضبط سے بھی باہر ہیں اور دوسری تنظیموں سے بھی چھپتے رہتے ہیں۔
    اس واسطے نظارت تعلیم کو یہ آرڈر دینا چاہئے کہ تعلیم الاسلام کالج کسی ایسے لڑکے کے داخلے کے فارم پر جو پرائیویٹ امتحان دے رہا ہے دستخط نہیں کرے گا جب تک یہ تسلی نہ کر لے کہ اخلاقی لحاظ سے اور تعلیمی لحاظ سے وہ لڑکا ایک خاص معیار سے نیچے نہیں ہے۔ یہ صحیح ہے کہ تعلیمی لحاظ سے شاید وہ اتنا اچھا نہ ہو بعض اچھے بھی ہوتے ہیں لیکن اخلاقی لحاظ سے تو وہ بہرحال گرا ہوا نہیں ہونا چاہئے اس کے بغیر ان کو اجازت نہیں دینی چاہئے ورنہ اب میرے خیال میں اس وقت کوئی تیس چالیس لڑکے ایسے ہوں گے یا اس سے بھی زیادہ اگر لڑکے لڑکیاں ملا لی جائیں تو ساٹھ ستّر ہوں گے جو پرائیویٹ امتحان دیتے ہیں کیوں دیتے ہیں؟ پس کوئی تو اُن کے اوپر نگرانی ہونی چاہئے کہ اگر انہوں نے یہاں امتحان دینا ہے یہاں کی فضا سے فائدہ اٹھانا ہے یہاں کے سنٹر کے بھی جو امتحان کے لئے بنتا ہے بڑے فائدے ہیں یہاں نہ شور ہے اور نہ ہنگامہ ہے ایک طالب علم آرام سے یہاں امتحان دے دیتا ہے۔ باہر کے سنٹرز میں ایسی پرسکون فضا نہیں ہوتی پس ہمارے کالج کو چاہئے کہ اپنا معیار اس لحاظ سے بھی قائم رکھے وہاں کی فضا، وہاں کا دیانتداری کا ماحول کہ ہر شخص اپنے علم کے مطابق جواب دے اور امتحان کے ہال میں کسی دوسری مدد کی طرف اس کا ذہن ہی نہ جائے ایسا ماحول ہونا چاہئے۔
    پس یہ ساری چیزیں فوری طور پر گرفت کے اندر آنی چاہئیں نظارت تعلیم اگر اس طرف توجہ نہیں دے گی تو پھر مجھے توجہ دینی پڑے گی وہ تو طالب علموں کو اساتذہ کو سمجھائیں گے لیکن جب میں سمجھائوں گا تو مجھے ناظر تعلیم کو بھی سمجھانا پڑے گا جو میرے استاذ بھی ہیں لیکن فرض فرض ہے استاد کی عزت اپنی جگہ ہے وہ بھی ہم کریں گے فرض کی ادائیگی میں کوتاہی اور غفلت اللہ تعالیٰ کو پیاری نہیں ہم اپنی طرف سے یہی کوشش کریں گے کہ ہمارا رب ناراض نہ ہو۔
    بہرحال آج کے بعد توجہ پوری ہوجانی چاہئے نتیجہ تو جب نکلے گا اس وقت پتہ لگ جائے گا کہ کتنی توجہ دی گئی ہے لیکن اخلاقی لحاظ سے تو میرے پاس ہر روز رپورٹ آجاتی ہے چاہے یہ رپورٹ ہو کہ سب ٹھیک ہے اور چاہے یہ رپورٹ ہو کہ کسی جگہ کوئی غلطی ہے۔ رپورٹ دینے والے محکمے بھی ہیں اور افراد بھی ہیں ہم سب ایک جسم کی حیثیت رکھتے ہیں جیسا کہ میں شروع خلافت سے کہہ رہا ہوں کوئی چیز چھپی نہیں رہتی کئی نادان ایسا نہیں سمجھتے اب مثلاً ڈاک ہے میں ساری ڈاک خود دیکھتا ہوں اور کئی دفعہ جن کو کسی محکمے سے کوئی شکایت پیدا ہو جائے وہ کسی کے ذریعہ خط بھیجتے ہیں اور کہتے ہیں کہ معلوم ہوتا ہے کہ ہمارے خط آپ تک پہنچنے نہیں دیئے جاتے حالانکہ سارے خط میرے پاس پہنچے ہوتے ہیں اور میں نے ان کو دیکھا ہوتا ہے۔
    پس یہ چیزیں جماعت پہنچانے والی ہے دوست ذرا ذرا سی بات پہنچا دیتے ہیں کوئی چیز چھپی نہیں رہتی نہ رہنی چاہئے ورنہ خلیفہ اور نائب اُذْنٌ خَیْرٌ نہیں رہتا۔
    غرض نیابت نبوت میں خلافت بھی کان ہے اور اس تک آوازیں پہنچتی رہتی ہیں کوئی چیز چھپائی نہیں جا سکتی اور آخری ذمہ داری اس پر ہے اور اپنے رب سے ہر وقت سب سے زیادہ خوف کھانے والا میں سمجھتا ہوں وہی ہے کیونکہ ساری ذمہ داری جو اس پر ڈال دی بڑے استغفار اور توبہ اور دعائوں کے ساتھ زندگی کے دن گزارنے پڑتے ہیں اور سوائے خداتعالیٰ کے خوف کے کسی کا خوف نہیں ہوتا اور سوائے خدا کی خوشنودی کے کسی اور جہت سے رضا کے حصول کی کوئی تمنا نہیں ہوتی اس واسطے اگر گرفت ہوگی تو بڑی سخت گرفت ہوگی صرف خداتعالیٰ کو خوش کرنے کے لئے ہوگی لیکن خدا کرے کہ ہماری آئندہ نسلوں کی جو ذمہ داری بعض احباب پر ڈالی گئی ہے وہ اس ذمہ داری کو سمجھیں اور تعلیمی اور تربیتی اور اخلاقی لحاظ سے اللہ تعالیٰ کے حضور وہ سرخرو ہوں اور اللہ تعالیٰ کے پیار کو وہ حاصل کریں۔ اَللّٰھُمَّ اٰمین۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۱۹؍ مارچ ۱۹۷۰ء صفحہ ۲ تا ۶)
    ززز









    رسول اکرمؐ صفاتِ باری تعالیٰ کے مظہرِ اتم،نورِمجسّم، مُجدّدِاعظم،معلّم اعظم اورانسانیت کے محسنِ اعظم ہیں
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۲۰؍ مارچ ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    اس وعدہ کے مطابق کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کوکوثرعطاہوگا امّتِ محمدیہ میں کروڑوں اربوں ایسے فدائی اورجاں نثار اورکامل متّبع پیدا ہوئے جنہیں اللہ تعالیٰ کے فضل سے اپنے اپنے ظرف کے مطابق حقیقتِ محمدیہ کی معرفت عطا کی گئی تھی۔
    حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے عظیم روحانی فرزند کے طفیل ہم نے بھی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی عظیم تجلّیاتِ روحانی مشاہدہ کیں اورہماری جماعت بھی ان خادموں اور غلاموں میں سے ہے جن پر حقیقتِ محمدیہ منکشف ہوئی اورجنہیں مقامِ محمدؐ کی معرفت عطاکی گئی اور وہ علیٰ وجہ البصیرت ان باتوں پرقائم ہیں اوّل یہ کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم صفاتِ باری تعالیٰ کے مظہر اتم ہیں۔ ہربنی جو دنیا کی طرف مبعوث ہوا اورہروہ بزرگ متبع جس کے ذریعہ اللہ تعالیٰ نے اپنی عظمت اورجلال کو قائم کیاوہ اپنے اپنے ظرف کے مطابق مظہر صفات باری بنا لیکن وہ ایک ہی تھے یعنی حضرت محمد مصطفی خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کہ جنہوں نے پورے طور پراپنے وجود میںان صفاتِ باری کوجذب کیا اورپھر اپنے وجود سے انہیں ظاہر کیایعنی جن صفات کاتعلق اس عالمین سے ہے آپ ان کا مظہر بنے۔ ہمارے نزدیک یہی ایک وجود ہے جسے حقیقی اورکامل عرفان شیون باری عطاہوا جو اللہ تعالیٰ کی صفات کا مظہر اتم ٹھہرے اورپھر اس مقامِ محمدیت سے فیوض کی جومختلف نہریں نکلتی ہیں۔ اس نورِ مجسم سے نور کے جومختلف ستون روحانی آسمانوں کی بلندیوں کی طرف اٹھتے ہیں ان کے ہی مختلف جلوے ہمیں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے متبعین کی ذات میں نظر آتے ہیں اورچونکہ آپ صفاتِ باری کے مظہرِ اتم تھے اس لئے ایک طرف اللہ تعالیٰ سے آپ کا پختہ تعلق تھا اوردوسری طرف آپ کا جوتعلق اس کے بندوں سے، بنی نوع انسان سے تھا وہ بھی اتنا پختہ اوراتنا وسیع تھا اوراتنا عمیق تھا کہ ہمیں کوئی انسان اس میں آپ کا مقابلہ کرتا نظر نہیں آتا۔ بنی نوع انسان کی ہمدردی اورغم خواری ایک ٹھاٹھیں مارتے ہوئے سمندر کی طرح ہمیں آپ کی ذات میںنظر آتی ہے آپ نے صرف ان پر ہی نگاہ نہیں رکھی جو آپ کے گردآپ کے زمانہ میں رہتے تھے، جو پروانوں کی طرح آپ کے نور کے ساتھ لپٹے رہتے اورآپ کی محبت میں آپ کے وجود کی چمک دیکھ کر آپ کے اس روحانی وجود کے گرد طواف کرتے رہتے تھے صرف ان پر ہی نگاہ نہیں رکھی اوران کی ضرورتوںہی کو نہیں سمجھا اورصرف ان کوہی پورا کرنے کی کوشش نہیں کی بلکہ یہ ایک حقیقت ہے کہ آپ کواللہ تعالیٰ نے اپنی صفات کامظہر اتم اس وقت سے بنا دیا تھا کہ ابھی آدم اس دنیا میں وجود پذیر نہیں ہواتھا اور اس وقت سے لے کر قیامت تک جتنے بھی انسان پیداہوئے ان سب پر آپ کی نگاہِ کرم تھی اوران کی ضرورت کے مطابق آپ کا احسان ان لوگوں پر تھا۔حضرت آدمؑ کے زمانہ میں اس وقت کی انسانی صلاحیت کے مطابق قرآنِ عظیم کا ایک حصہ انہیں عطا ہوا اورجب انسان نے روحانی ترقی کے مزید مدارج طے کرلئے توحضرت نوحؑ کے زمانہ میں ان کے زمانے کے مطابق اور حضرت ابراہیم ؑ کے زمانے میں ان کی ضرورت کے مطابق اور حضرت موسٰیؑکے زمانے میں ان کی قوم کی اس زمانے کی صلاحیت کے مطابق انہیں قرآنِ کریم کے حصے ملے۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی رُوحانی آنکھ نے ان کے لئے جس چیز کی ضرورت محسوس کی اللہ تعالیٰ کے فضل اور اس کے حکم سے وہی چیز ان کو عطا کردی۔ آپ کی یہ مظہریت اتنی اتم اوراکمل ہے کہ اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم میںآپ کے وجود کوظلّی طورپر اپناوجود ہی قرار دیا اورفرمایا:-قُلْ جَآئَ الْحَقُّ وَزَھَقَ الْبَاطِلُ اِنَّ الْبَاطِلَ کَانَ زَھُوْقًا (بنی اسرائیل:۸۲) حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے اس آیت کی تفسیر کرتے ہوئے فرمایا ہے کہ جَآئَ الْحَقُّ میں اَلْحَقُّ سے مراد خدا تعالیٰ کی ذات بھی ہے اور حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کاوجود بھی ہے اور قرآن کریم کی شریعت وہدایت بھی ہے۔
    پس حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم صفاتِ باری کے مظہر اتم ہونے کے نتیجہ میں ہر پہلے اورپچھلے پر نظر رکھتے ہیں اوران کی جسمانی اورروحانی ضرورتوں کوپورا کرنے کی کوشش کرتے ہیں اورقرآن کے وہ حصے ان کوباذنِ الٰہی اورآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے طفیل ملتے رہے جوان کے مناسب حال تھے۔ اس سے اندازہ ہوسکتا ہے کہ کس عظیم شان کے تھے ہمارے محمد خاتم النبییّن صلی اللہ علیہ وسلم۔
    وہ لوگ جنہیں حقیقتِ محمدیہ کاعرفان عطاہوا جانتے ہیں کہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہی ایک ایسے انسان ہیں جنہیں اللہ تعالیٰ کی طرف سے جاودانی حیات ملی ہے۔ ایک زندہ نبی، خدا کا پیارانبی صرف ہمارا یہ نبیوں کا سردار اوررسولوں کا فخرہی ہے جسے دنیا محمدمصطفی احمد مجتبیٰ خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کے نام سے جانتی ہے۔
    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی اس جاودانی زندگی کا ہمیں اس سے پتہ لگتا ہے کہ اس پاک ختم المرسلین کا افاضۂ روحانی قیامت تک جاری ہے اورآپ کی پیروی ہمیشہ ہی ہرزمانے میں اور ہر نسل کیلئے روحانی طورپر زندگی بخش ثابت رہی ہے اورہوتی رہے گی اگرکسی کوکچھ شبہ ہوتو آج ہم (جماعت احمدیہ) اس کی تسلی کرانے کے لئے تیار ہیں کہ حقیقی روحانی حیات کے مالک حضرت محمد خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم ہیں کیونکہ حقیقی زندگی اور سچی زندگی اورہمیشہ رہنے والی کامل زندگی وہ ہے جس سے ہمیشہ کے لئے فیوض کے سرچشمے پھوٹتے رہیں اوروہ تمام انسانی ضرورتوں کوپورا کرنے والی ہو۔
    پھر ہم جنہیں مقامِ محمدیہ کی معرفت ملی ہے ہم جانتے ہیں کہ حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالیٰ کے ایک عظیم نور کی حیثیت سے دنیا کی طرف مبعوث ہوئے تھے جیسا کہ قرآنِ کریم میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے: وَاَنْزَلْنَآ اِلَیْکُمْ نُوْرًا مُّبِیْنًا (النساء :۱۷۵) اورجیسا کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے سورۃ النور کی آیت نمبر۳۶ کی تفسیر کرتے ہوئے فرمایا کہ مَثَلُ نُوْرِہٖ کَمِشْکٰوۃٍ (النور: ۳۶) میں حضرت بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے نور کی مثال دی گئی ہے یعنی ایک تفسیر اس کی یہ ہے کہ ’’اَللّٰہُ نُوْرُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ‘‘ کا تو اللہ کے ساتھ تعلق ہے اور ’’مَثَلُ نُوْرِہٖ کَمِشْکٰوۃٍ‘‘ سے جس کا تعلق ہے وہ اللہ تعالیٰ کی صفات کا مظہر اتم ہے یعنی خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم اور اس آیت میں یہ بیان ہوا ہے کہ ایک طرف تواپنی پیدائش اورخلق کے لحاظ سے ان قوتوں اوراستعدادوں کے لحاظ سے جو اللہ تعالیٰ کی طرف سے آپ کوعطا ہوئی تھیں آپ نورِ مجسم تھے اوراس نور مجسم پر جب آسمانوں سے اللہ تعالیٰ (جو سرچشمہ ہے تمام انوار کا اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے انوار بھی اسی سرچشمہ سے نکلتے ہیں) کی وحی نازل ہوئی تو آپ نُوْرٌ عَلٰی نُورٌ ہوگئے یعنی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے جوخداداد نورتھے جو روحانی قوتوں اوراستعدادوں کی شکل میں آپ کوعطا ہوئے تھے ان پر جب اللہ تعالیٰ کی وحی کانور نازل ہوا تو کامل نور کی صورت آپ بنی آدم کی طرف مبعوث ہوئے اورآدمؑ سے لے کر ہرنبی نے آپ ہی کے نورِ نبوت سے اپنی شمعِ نبوت روشن کی۔
    پھر ہم لوگ جو حقیقتِ محمدیہ کو پہچانتے ہیں جانتے ہیں کہ حضرت خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم ان تمام اخلاقِ فاضلہ کواپنے وجود اوراسوہ میں جمع کرنے والے تھے جس کی جھلک ہمیں گزشتہ تمام انبیاء میں مختلف طورپرنظر آتی ہے۔ پس انبیائے ماسبق اورخدا تعالیٰ کے وہ پیارے جو بعد میں پیداہونے والے تھے ان سب کے اندر ہمیں اخلاقِ فاضلہ کی جو جھلک نظر آتی ہے جو متفرق طورپر آدم علیہ السلام سے لے کر قیامت تک بنی نوع انسان میں پھیلی ہوئی ہے وہ تمام اخلاق ہمیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وجود میں جمع نظر آتے ہیں۔ اسی لئے قرآنِ کریم نے یہ فرمایا: ’’اِنَّکَ لَعَلٰی خُلُقٍ عَظِیْمٍ‘‘ (القلم :۵) پھر ہم جو اس علم پر علیٰ وجہ البصیرت قائم کئے گئے ہیں کہ حضرت بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم خاتم الانبیاء اور ختم المرسلین ہیں۔ ہم یہ جانتے ہیں اور دنیا میں اس کی منادی کرتے ہیں کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ہی مجددِ اعظم ہیں جس کے معنے یہ ہیں کہ اظہار صداقت کے لئے آپ جیسا کوئی اورمجدد پیدا نہیں ہوا۔ سچائی کے اظہار کے لئے گم گشتہ سچائی کودوبارہ دنیا میں لانے کے لئے آپؐ ہی سب سے بڑے مجدد ہیں۔روحانیت کے قیام کے لئے حقیقتاً آپ ہی آدم ہیں کیونکہ آدمِ اول نے آپ ہی سے سچائی کو حاصل کیا اور آپ ہی کے طفیل اس سچائی اور صداقت کو وقت کے تقاضے اورپہلی نسل کی صلاحیت کے مطابق دنیا پر ظاہر کیا لیکن حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جو مجدد اعظم ہیں آپ کے طفیل تمام انسانی فضائل اپنے کمال کوپہنچے۔ پہلے کسی وجود میں یہ چیز ہمیں نظر نہیں آتی۔ اس میں شک نہیں کہ انسان نے بعض پہلوئوں سے ترقی کی اورایک حدتک کمال کو حاصل کیا لیکن یہ کہ ہرانسان اپنے تمام فضائل کو اپنے دائرہ استعداد کے اندر کمال تک پہنچانے کے قابل ہوسکے یہ صرف حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے طفیل ہوا۔ آپ دنیا میں آئے اوراپنا کامل نمونہ دنیا میں پیش کیا اور ایک کامل تعلیم انسان کے ہاتھ میں دی جس کے نتیجہ میں انسانی فضائل اپنے کمال کو پہنچ سکنے کے قابل ہوئے۔ انسان کی فطرت میں اللہ تعالیٰ نے جس قدر بھی تقاضے رکھے ہیں یا انسانی وجود کی جس قدر بھی شاخیں ہیں ان تمام کے لئے یہ سامان پیداہوگیا کہ وہ اپنے کمال کوپہنچ سکے اور ہم یہ جانتے ہیں کہ معلّمِ اعظم بھی حضرت بنی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات ہے اللہ تعالیٰ قرآن کریم میں فرماتا ہے ’’وَعَلَّمَکَ مَالَمْ تَکُنْ تَعْلَمُ ط وَکَانَ فَضْلُ اللّٰہِ عَلَیْکَ عَظِیْمًا‘‘ (النسآء : ۱۱۴) وہ علم اللہ تعالیٰ کی طرف سے تمہیں عطا ہوا ہے جو تم بحیثیت ایک بشر کے اپنے زور سے خودبخود حاصل نہیں کرسکتے تھے اورفضل الٰہی سے فیضان الٰہی سب سے زیادہ آپ پرہوا جس کے معنے یہ ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی صفات کی معرفت جس کو ہم معارفِ الٰہیہ بھی کہتے ہیں اوراسرار اورعلومِ ربّانی جوہیں ان کے جاننے میں آپ اعلم تھے یعنی آپ سے زیادہ ان کا عرفان رکھنے والا کوئی بھی نہیں ہوا اورجوزیادہ جانتاہے جو سب سے زیادہ علم رکھتا ہے وہی سب سے زیادہ سکھا بھی سکتا ہے اگر آپ علم کی سواکائیاں فرض کریں تو جس شخص کوپچاس اکائی کاعلم ہے وہ ساٹھ اکائی نہیں سکھا سکتا۔ سو کی سَواکائی وہی سکھا سکتا ہے جو خودسو اکائی کاعلم رکھتا ہو۔ پس عَلَّمَکَ مَالَمْ تَکُنْ تَعْلَمُ وَکَانَ فَضْلُ اللّٰہِ عَلَیْکَ عَظِیْمًا (النساء : ۱۱۴)میں اللہ تعالیٰ نے دنیا کو یہ بتایا کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر علم کے میدان میں(علم روحانی لیکن علم جسمانی کے اصول بھی اسی علم روحانی کے نیچے آتے ہیں) جتنا فضل حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پرہوا اتنا کسی اورپر نہیں ہوا۔ جس قدر انسان کو علم روحانی کی ضرورت تھی وہ سب آپ کو سکھایا گیا اورآپ کے طفیل نوعِ انسانی اس قابل ہوئی کہ اگر وہ کوشش اورہمت سے کام لے تو اپنے اپنے ظرف کے مطابق اپنی علمی استعدادوں کوکمال تک پہنچا سکتی ہے۔
    پس حضرت بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جو خاتم الانبیاء ہیں وہی معلم اعظم ہیں اورکوئی نہیں ہوسکتا اور خاتم الانبیاء کے یہ بھی معنی ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی صفات کا جوعلم آپ کوملا کسی اورنبی کو نہیں ملا اوربنی نوع انسان کوعلوم سکھانے کی جوقدرت آپ نے پائی وہ قدرت بھی کسی اور نہیں ملی۔ پس آپ ہی خاتم الانبیاء ٹھہرے۔
    پھر ہم لوگ یہ جانتے ہیں کہ حضرت محمد مصطفی خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم دنیا کے مربی اعظم ہیں آپ کے ہاتھ سے دنیا کا وہ فسادِ عظیم اصلاح پذیرہوا جو آہستہ آہستہ مدارج تنزل میں سے گزرکرانتہائی طورپر بھیانک اور مفسدانہ ظلمات کی شکل میں انسان کے سامنے اس وقت آیا جب حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم مبعوث ہوئے اور اس فساد اعظم کی اصلاح کاکام آپ کے سپرد ہوا اورآپ نے نہایت کامیابی کے ساتھ دنیا کی اصلاح کی اورانسان کواس قابل بنایا کہ اگروہ چاہے تواس فسادِ عظیم سے جودنیا میںرونما ہوچکا ہوا تھا ان وسائل کے طفیل جو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے ہاتھ میں دئیے ہیں بچ سکے اوراللہ تعالیٰ کی رحمت اور اسکی مغفرت کی چادر میں اپنے آپ کو لپیٹ لے۔
    انسان توحید کوبھول چکا تھا۔ حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے توحید کوزمین پر قائم کیا۔ آپ نے تمام مذاہبِ باطلہ کو حجت اوردلیل سے مغلوب کیا۔ وہ جو گمراہ ہوچکے تھے ان کے شبہات مٹائے عقلی طورپر بھی اورمشاہدہ کے رنگ میں بھی اورہر ملحد کے وساوس دور کئے اورنجات کاسچا سامان اس طرح پر انسان کے ہاتھ میں دیا کہ اصولِ ّحقہ ( جوحقیقی اصول تھے روحانی اورجسمانی ان) کی اسے تعلیم دے دی اور اس طرح انسان کے لئے نجات کے سامان ممکن اورمقدر کردئیے۔
    ہم جوحقیقتِ محمدیہ کو جانتے اورپہنچانتے ہیں اور اس بات پر علیٰ وجہ البصیرت قائم ہیں کہ آپ ہی ختم المرسلین اورخاتم الانبیاء ہیں۔ ہم اپنے نفوس میں بھی یہ مشاہدہ کرتے ہیں کہ ہم یہ کوشش کرتے ہیں کہ دنیا بھی اس بات کو سمجھنے لگے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے نقشِ قدم پر چلنا انسان کو خدا تعالیٰ کا محبوب بنادیتا ہے۔
    نقشِ قدم پر چلنے میںتین باتیں آتی ہیں۔ اولؔ یہ کہ آپ کے حسن کو جاننا جس کے نتیجہ میں محبت پیدا ہوتی ہے۔ پس نقشِ قدم پرچلنے کے لئے ضروری ہے کہ آپ کے حسن کا علم حاصل کر کے بے اختیار ہوکر آپ کی محبت میں کھو جانا ۔دوئمؔ یہ کہ آپ کی عظمت کو پہچاننا۔ ’’قُلْ جَآئَ الْحَقُّ وَزَھَقَ الْبَاطِل‘‘ایک عظیم نعرہ تھا جو حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے حق میں آپ کے مظہر الوہیت ہونے کا لگایاگیا۔جوعظمت اورجلال ہمیں اللہ تعالیٰ میں(جوکہ تمام صفات حسنہ سے متصف اورہر عیب سے پاک ہے) نظرآتا ہے۔ وہ عظمت اورجلال ظلّی طور پر ہمیں حضر ت محمد صلی اللہ علیہ وسلم میں نظر آتا ہے کیونکہ آپ اللہ تعالیٰ کی صفات کے مظہراتم ہیں۔
    پس اللہ تعالیٰ کے ظلّیت میں حضرت بنی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو جوعظمت اورجلال حاصل ہوا اس کی قدر کرنا اور اس کو پہچاننا آپ کے نقشِ قدم پر چلنے کیلئے ضروری ہے تاکہ ہرانسان اپنے ظرف کے مطابق روحانی ترقیات کرتا ہوا اپنے رب کا زیادہ سے زیادہ قرب حاصل کرے اور اس کی صفات کا زیادہ سے زیادہ مظہر بن سکے۔
    نقشِ قدم پر چلنے کے لئے تیسری ضروری بات یہ ہے کہ آپ کی کامل اطاعت کی جائے پس جو شخص اللہ تعالیٰ کی توفیق سے حضرت بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت کرتا ہے اور آپ کی عظمت اورجلال اورآپ کے مقام کو پہچانتا ہے اور اس عشق کے نتیجہ میں اور اس عظمت کے رعب کے سایہ میں آپ کی کامل اطاعت کرتا ہے۔ اللہ تعالیٰ اس کو اپنا محبوب بنا لیتا ہے اور اسے ہروہ چیز مل جاتی ہے جوایک محبوب کو محبت کرنے والے پیارے سے ملا کرتی ہے چونکہ ہرچیز خدا تعالیٰ کی ہے اس لئے جو خدا تعالیٰ کا محبوب بن گیا اسے تو سب کچھ مل گیا۔ فالحمد للّٰہ علٰی ذالک
    پھر ہم جو حقیقت محمدیہ کا عرفان رکھتے ہیں ہم یہ جانتے ہیں کہ حضرت محمد مصطفی خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم اس صفت میں کہ آپ انسانیت کے محسنِ اعظم ہیں یکتا اور بے نظیر ہیں۔ آپ کی محسنانہ ہمدردی اورمشفقانہ غم خواری کا کسی ایک فردیا ایک قبیلہ یا ایک خاندان سے تعلق نہیں بلکہ ساری دنیا سے اس کا تعلق ہے پھر کسی ایک زمانہ سے اس کا تعلق نہیں قیامت تک کے زمانوں سے اس کا تعلق ہے۔ ایسی سچی کامل اورہمہ گیر ہمدردی کسی اوروجود میں توہمیں نظر نہیں آتی ویسی ہمدردی توکجا، میں تو سمجھتا ہوں اس کا ہزارواں حصہ بھی اس کا کروڑواں حصہ بھی ہمیں کہیں اورنظر نہیں آتا اوراگرکسی شخص کی فضیلت اس کے ان کاموں سے ہوسکتی ہے جن سے بنی نوع انسان کی سچی ہمدردی ثابت ہوتوہم گواہی دیتے ہیںاوراس حقیقت کی دنیا میں منادی کرتے ہیں کہ اس صفت میں حضرت محمد مصطفی احمد مجتبیٰ خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم سب نبیوں اورتمام انسانوں سے بڑھ کر بے نظیر انسان ہیں اوربھی بہت سی باتیں ہیں مگر اس وقت میں نے صرف بعض کولیا ہے اورجماعت کویہ بتانے کی کوشش کی ہے(میں امید رکھتا ہوں کہ آپ اس بات کو سمجھ گئے ہوں گے) کہ مقام محمدیہ کی جو معرفت ہمیں حاصل ہے آج وہ ہمارے غیر کو حاصل نہیں۔ اس میں شک نہیں کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے اس وقت تک کروڑوں اربوں لوگ ایسے پیدا ہوئے جنہیں اپنے اپنے ظرف کے مطابق یہ معرفت ملی۔ ہم نے اس عرفان کوآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے عظیم روحانی فرزند کے ذریعہ حاصل کیا ہے اورپہلوں کی طرح جنہیں یہ عرفان اورمعرفت عطا ہوئی تھی حقیقی معنی اور عارفانہ رنگ میں آج اگرکوئی’’خاتم الانبیاء زندہ باد‘‘ کا نعرہ لگاسکتا ہے تووہ ہم ہیں۔ ہم جب
    خاتم الانبیاء زندہ باد
    ختم المرسلین زندہ باد
    کا نعرہ لگاتے ہیں توہمارا یہ نعرۂ عارفانہ نعرہ ہے۔ ہم اس حقیقت کو پہچانتے ہیں اور ہمارے دل کی گہرائی ہماری روح کی وسعتوں اورہمارے جسم کے ذرّہ ذرّہ سے یہ آواز بلند ہوتی ہے کہ
    خاتم الانبیاء زندہ باد
    ختم المرسلین زندہ باد
    لیکن بعض وہ بھی ہوسکتے ہیں جنہوں نے تاریخ کی دوریوں اورماضی کے دھندلکوں میں افق انسانی پردور سے ایک چمک تودیکھی اور اس چمک سے وہ ایک حد تک گھائل بھی ہوئے لیکن ابرِرحمت ان پر نہیں برسا۔ ماضی کے دھندلکوں میں وہ جو ایک چمک انہیں نظر آئی۔ اس پر فریفتہ ہوکر اور اس کے عاشق ہوکروہ بھی خاتم الانبیاء زندہ باد کا نعرہ لگا لیتے ہیں لیکن ان کانعرہ عارفانہ نعرہ نہیں ہے بلکہ محجوبانہ نعرہ ہے وہ اس مقام کو پہچانتے تونہیں صرف ایک جھلک کے وہ گھائل ہوچکے ہیں اور ہم خوش ہیں کہ وہ پاک وجود جوہمارے دل اورہمارے دماغ اورہماری روح اورہمارے جسم پر حکومت کرتا ہے۔ اس کے حق میں محجوبانہ نعرے بھی لگائے جاتے ہیں لیکن جب
    ختم نبوت زندہ باد
    کا نعرہ بلند ہوتوایک احمدی کی روح گہرائیوں سے نکلنے والا عارفانہ نعرہ ہی سب سے زیادہ بلند ہونا چاہئے۔
    پس آج میں آپ کو اس طرف متوجہ کررہا ہوں کہ ’’خاتم الانبیاء زندہ باد‘‘ بحیثیت ایک عارفانہ نعرہ کے ہمارا نعرہ ہے اورعلم وعرفان نہ رکھنے والوں کے منہ سے نکلے تووہ محجوبانہ نعرہ ہے البتہ یہ محجوبانہ نعرہ سن کر بھی ہمارے دل خوش ہوتے ہیں کہ ہمارے محبوب کے نور کی ایک جھلک کوتوانہوں نے دیکھ لیاخواہ ماضی کے دھندلکوں ہی میں کیوں نہ دیکھاہو۔ پس اگرکہیں یہ نعرہ بلند ہوتوآپ زیادہ شوق سے زیادہ پیار سے اس کے اندر شامل ہواکریں۔ دوسروں کی آواز اگرپہلے آسمان تک پہنچتی ہو تو آپ کی آواز ساتویں آسمان سے بھی بلند ہو کر خدائے عزّوجل کے عرش تک پہنچے تاہمارے آقا ہمارے محبوب حضرت محمدرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم خوش ہوں کہ میرے کامل متبعین میرے عشق میں مستانہ وار یہ نعرہ لگارہے ہیں۔
    خاتم الانبیاء زندہ باد
    دوسرا نعرہ جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے طفیل ہم نے پایا ہے وہ بھی ہم نے ہی پایا ہے۔ کوئی اوروہ نعرہ بھی عارفانہ نعرہ کے طورپر نہیں لگا سکتا۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ’’خاتم الانبیاء‘‘ کی حیثیت سے دنیا کے محسن اعظم ہیں اوراس میں کوئی شک اورکلام نہیں۔میں اسکی وضاحت میں اختصار سے صرف چار باتوں کولونگا۔ اوّل۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعہ انسان پر جو احسان عظیم ہوا وہ شرفِ انسانی کاقیام ہے پہلے بزرگ انبیاء نے شرفِ انسانی کوقائم نہیں کیا انہوں نے اپنی قوم کی ضرورتیں پوری کیں۔ ان کی تربیت کی طرف بڑی توجہ دی دعائوں کے ساتھ جس حد تک ممکن تھا انہوں نے اپنی قوم کی تربیت کی اور ان کو نیک اوراپنے اپنے ظرف کے مطابق مطہّر بنانے کی کوشش کی اس میں تو شک نہیں لیکن شرف انسانی کاقیام ان کے لئے ممکن نہیں تھا۔ وہ تومبعوث ہی ہوئے تھے ایک خاص زمانہ اور ایک خاص قوم کی طرف۔ شرفِ انسانی کاقیام حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کاانسانیت پر خاص احسان ہے اورصرف آپ سے تعلق رکھتا ہے۔ معلوم دنیا اورغیر معلوم خطوں میں بسنے والے ہرفرد کی عزت اورشرف کو آپ نے قائم کیا۔دنیامیں اس وقت بعض ایسے خطے بھی تھے جن کے متعلق عرب میں بسنے والوں کوکوئی علم نہیں تھا۔ مثلاً Red Indians(ریڈانڈین) جو دنیا کے اس خطے میں جو اب امریکہ کہلاتا ہے بستے تھے مگر بعثت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت آپ کے پہلے مخاطب عرب میں بسنے والوں کوان کاعلم نہ تھا۔ حضرت نبی کریم ختم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم نے اس نامعلوم خطۂ زمین میں بسنے والے انسان کی عزت اور احترام اور اس کاشرف بھی قائم کیا آپ نے یہ نہیں فرمایا کہ کسی ایسے انسان کے جذبات کوٹھیس نہیں پہنچانی جوعرب میں بستا ہو یا حبشہ میں بستا ہو یا افریقہ میں بستا ہو بلکہ یہ فرمایا کہ انسان جہاں بھی بستا ہو تمہیں اس کا علم ہو یا نہ ہو اس کے جذبات کو ٹھیس نہیں لگانی۔
    جس وقت ہمارا تعلق ان قوموں سے قائم ہوا جن کا علم اس زمانہ کو نہیں تھا تو ہم ایک مسلمان احمدی کی حیثیت سے (اورہم سے پہلے بزرگ جو تھے وہ بھی ایک کامل متبع کی حیثیت سے اورہم بھی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے کامل متبع کی حیثیت سے) ان کو جاکر یہ کہتے ہیں اور ایسا کہنے میں حق بجانب ہیں کہ تمہارا خیال کسی اور نے نہیں رکھا لیکن حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تمہارا خیال رکھا اور باوجود اس کے کہ اس وقت دنیا تمہارے وجود کو بھی نہیں جانتی تھی تمہارے متعلق یہ حکم چھوڑ گئے کہ جب تم بحیثیت انسان ہمارے ساتھ ملاپ کرو تو تمہاری بھی وہی عزت اور احترام کیا جائے۔ جو ہم آپس میں اپنے ملک کے رہنے والوں یا اپنے برّاعظم کے رہنے والوں سے کرتے ہیں۔ وہی عزت اور احترام ہم تمہارا بھی قائم کریں گے۔
    میں نے پہلے بھی بتایا تھا کہ ’’اِنَّمَآ اَناَبَشَرٌمِّثْلُکُمْ‘‘ (حٰمٓ السجدۃ :۷) کا ایک عظیم نعرہ تھا جو حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان سے قرآن عظیم میں لگایا گیا۔جس نے تمام انسانوں کو بحیثیت انسان ایک مقام پرلاکھڑا کردیا حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جیسا تو کوئی اوروجود نہ پہلوں میں پیدا ہوا اور نہ آئندہ پیدا ہوگا۔ آپ کے منہ سے یہ کہلوایا کہ میں تمہارے جیسا انسان اور تم میرے جیسے انسان ہو۔ اس سے انسان کی اتنی عزت اور احترام قائم ہوگیا کہ انسانی عقل حیران رہ جاتی ہے، سب انسانوں کو اس مقام پرکھڑا کرکے پھرآپ نے کہا دیکھو! میں تمہارے جیسا انسان ہوں، میرے اندربھی تمہارے جیسی قوتیں اور استعدادیں ہیں آئو اب دیکھو میں اخلاقی دنیا میں، روحانی دنیا میں کس طرح بلندیاں اور رفعتیں حاصل کرتا ہوں میں تواپنے ظرف کے مطابق اونچا جائوں گا تم بھی اپنے ظرف کے مطابق بلندیوں کوحاصل کرسکتے ہو۔ اس لکیر پر جہاں سب برابر کردئیے گئے ٹھہرنا نہیں بلکہ بلندیوں کی طرف پرواز کرنی ہے لیکن اس مقام پر اس سطح پر سب کویہ کہہ کراکٹھا کردیا ۔ اِنَّمَآ اَنَا بَشَرٌمِّثْلُکُمْ (حٰمٓ السجدۃ :۷) پس انسانیت پر سب سے بڑا جو احسان حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے کیا ہے وہ یہ ہے کہ انسان کی بحیثیت انسان عزت قائم کی اور اسکا احترام قائم کیا اور اس کا شرف اورمرتبہ قائم کیا۔
    دوسرا عظیم احسان جو انسان پر بحیثیت انسان ہمارے محبوب خاتم الانبیاء نے کیا وہ یہ تھا کہ انسان کے حقوق قائم کئے اور ایسے سامان پیدا کئے اور ایسی تعلیم دی کہ اگر ہم اس تعلیم پر چلیں توسارے انسانوں کے حقوق انہیں مل جاتے ہیں (اس تفصیل میںتو میں اس وقت نہیں جائونگا۔ اقتصادی اصول پر میرے خطبات چھپ گئے ہیں ان میں مَیں وضاحت سے بیان کرچکاہوں کہ) حقوق انسانی کی جو تعریف قرآن عظیم نے کی ہے وہ انسانی عقل کرہی نہیں سکتی وہ صرف ربّانی الہام ہی کرسکتا ہے۔
    اس وقت وہ جوانسان کے سب سے بڑے ہمدردبنتے ہیں وہ اشتراکی ہیں لیکن ان سے بھی جب پوچھا جائے کہ تم کہتے تو یہ ہو کہ اقتصادی میدا ن میں انسان کواس کی ضرورتیں ملنی چاہئیں۔ پھر تم نے ضرورتوں کی تعریف کیوں نہیں کی؟ اس کا نتیجہ یہ ہے کہ چین میں ضرورت سے کچھ اورمراد لی جاتی ہے اوریوگوسلاویہ میں ضرورت سے کچھ اور مراد لی جاتی ہے۔ اورروسیوں کے نزدیک روس میں انسانی Needs(نیڈز) ضروریات کچھ اور ہیں اوران علاقوں میں جہاں روسیوں کا اثر و رسوخ ہے یعنی جو ان کے Satellites(سٹیلائٹس) کہلاتے ہیں۔ ان میں انسانی Needs(نیڈز) ضروریات کچھ اور بن گئی ہیں۔
    غرض یہ کہہ دینا تو کافی نہیں تھا کہ "To each according to his needs" یعنی یہ کہ ہرایک کی ضرورت پوری ہونی چاہئے اورپھر انسان خاموشی اختیار کرلے۔ گویا کہ پتہ ہی نہیں کہ ضرورت ہے کیا چیز۔
    قرآن کریم نے حقوق انسانی کی اتنی حسین تعریف کی ہے کہ اس کے حسن سے انسانی عقل خیرہ ہوجاتی ہے اورآدمی یہ سمجھتا ہے کہ کہاں جاکر انسانی عقل ٹھہر جاتی ہے اورآگے بڑھنے کے لئے الہامی روشنی کی ضرورت محسوس کرتی ہے۔ قرآن کریم کہتا ہے کہ اللہ رب العالمین ہے اللہ نے ہر فردِ واحد کو پیدا کیااور اس میں تمہیں جتنی قوتیں اور قابلیتیں اور استعدادیں نظر آتی ہیں وہ اللہ تعالیٰ نے پیدا کیں اور اس نے بحیثیت رب ہونے کے ان تمام قوتوں اور استعدادوں کی نشوونما کے سامان پیدا کئے ہیں۔ کم سے کم نشوونما نہیں بلکہ نشوونما کے کمال تک پہنچانے کے سامان پیدا کئے ہیں اورہر شخص جو قوت اور استعداد رکھتا ہے۔ اس قوت اور استعداد کونشوونما کے کمال تک پہنچانے کے لئے جس چیز کی بھی اسے ضرورت ہے وہ اس کا حق ہے اور وہ اسے ملنا چاہئے۔ اگر وہ حق اسے نہیں ملتا تو وہ مظلوم ہے اور اسلامی حکومت کا فرض ہے کہ وہ اسے اس کاحق دلوائے مثلاً ایک ہونہار اور ذہین بچہ جو آج آئن سٹائن(جوایک مشہورغیر ملکی سائنسدان ہے) جیسا دماغ رکھتا ہے یا ہمارے ڈاکٹر عبدالسلام جیسا دماغ رکھتا ہے مگر ایک غریب گھرانہ میں پیدا ہوجاتا ہے میں نے اپنی آنکھوں سے مشاہدہ کیا ہے کہ بعض غریب گھرانوں میں بڑے ذہین بچے پیدا ہوجاتے ہیں۔ کالج کے زمانہ میں بھی ایسے طالب علموں کی جہاں تک ہم سے ہوسکا جہاں تک ہمارے بس میں تھا ہم مدد کیا کرتے تھے اوراب بھی خداتعالیٰ کے فضل سے اگرکوئی ایسا ہونہار طالب علم میرے عِلم میں آجائے تو میں اسے کہہ دیا کرتا ہوں کہ تم علم میں ترقی کرتے چلے جائو۔ غیرملک میں بھی تمہیں بھجوائیں گے۔ تمہارا ذہن زیادہ سے زیادہ جو تعلیم حاصل کرسکتا ہے وہ تمہیں دلوائیں گے یہ حق ہے جسے اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں قائم کردیا ہے۔
    ایک شخص کو اللہ تعالیٰ نے اس قسم کی جسمانی قوتیں عطا کی ہیں کہ وہ ان قوتوں کی صحیح نشوونما کے بعد گاماں پہلوان(مشہور پہلوان ہے) کو بھی گرادے مگروہ ایک ایسے غریب گھرانہ میں پیدا ہوا جہاں نہ تو اسے وہ دودھ ملے نہ وہ مکھن نہ وہ بادام ملیں نہ وہ دیگر چیزیں جو پہلوان کھاتے ہیں وہ اس کو میسر ہوں، نہ مالش کے لئے تیل ملے نہ مالش کرنے والے اس کو ملیں تو اس کا جسم نشوونما نہیں کرے گا۔
    قرآن کریم کہتا ہے کہ اللہ رب العالمین نے اس کوجوجسمانی قوت عطا کی ہے۔ اس کی جسمانی قوتوں کوکمال تک پہنچائو دیکھو ایسا آدمی جو یہ سمجھ رہا ہو کہ میرا رب کتنا پیار کرنے والا ہے اورحضرت محمدصلی اللہ علیہ وسلم کا مجھ پر کتنا احسان ہے کہ میرے جسم کی ہر ضرورت جوتھی اس کو بطور حق کے قائم کیا اور دلوایا۔ غرض وہ گاماں پہلوان بھی بنے گا اور خدا رسیدہ انسان بھی ہوگا یعنی اگر اللہ تعالیٰ کے لئے شکر کے جذبات ہونگے تو وہ خدا رسیدہ انسان بھی ہوگا وہ محض ایک پہلوان نہیں ہوگا۔
    پس اسلام نے صرف یہ نہیں کہا کہ تمہاری ضرورتیں پوری کریں گے اورپھر وہ خاموش ہوگیا۔ اسلام نے یہ کہا ہے کہ جو بھی تمہاری طاقتیں ہیں۔ ان کونشوونما کے کمال تک پہنچانے کے لئے ہم تمہارے حقوق قائم کرتے ہیں۔ فقیر اور بھیک منگا نہیں بنایا بلکہ فرمایا کہ تمہارے حقوق قائم کرتے ہیں اورتمہیں یہ حقوق دلوائیں گے اور حقوق کی تعریف یہ کی کہ جہاں ہمیں واقعی کوئی قوت اور استعداد نظر آتی ہے (بعض دفعہ توماں ایک بدصورت بچے کوبھی خوبصورت سمجھتی ہے اس کی میں بات نہیں کررہا) ایک خوش قسمت انسان ہے جسے اللہ تعالیٰ نے واقعی اچھاذہن عطا کیا ہے یاجسمانی طاقتیں دی ہیں یا اخلاقی طاقتیں دی ہیں۔ وہ ساری طاقتیں کمال نشوونما تک پہنچنی چاہئیں۔ ان کی حقیقی اورکامل نشوونما ہونی چاہئے۔
    غرض یہ احسانِ عظیم انسانیت پر بحیثیت انسان کے ہے یہ نہیں کہا کہ اگرہندو ہوتو اس کی طاقتوں کو ضائع کرنے کی کوشش کرو یہ نہیں کہا کہ اگرایک عیسائی ہوتو اس کی طاقتوں پر تبرچلائو یہ نہیں کہا کہ اگر اللہ تعالیٰ کو گالیاں دینے والا دہریہ ہوتو اس کی کچھ پرواہ نہ کرو بلکہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں یہ فرمایا کہ دیکھو اگر کوئی اللہ تعالیٰ کو گالیاں دیتا ہے تواللہ تعالیٰ خود گرفت کرے گا۔ اگروہ مجھ پر ایمان نہیں لاتا تمہیں اس کی کیا فکرہے۔ تم نے بحیثیت انسان وہ سارے حقوق قائم کرنے اور ادا کرنے ہیں جو اسلام نے ایک انسان کے بحیثیت انسان قائم کئے ہیں اورجن کے ادا کرنے کی اس نے تعلیم دی ہے۔
    پس انسان کے حقوق کوقائم کیا ہے(مسلمان کے حقوق کی میں بات نہیں کررہا) انسانی حقوق کوقائم کیا اور ایسی تعلیم دی کہ وہ حقوق ادا ہوسکیں اور ایسا نظام بنایا کہ اس نظام میں وہ حقوق ادا ہوجاتے ہیں۔ غرض عظیم احسان ہے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا بنی نوع انسان پر بحیثیت انسان۔
    تیسرے انسانی جذبات کا بحیثیت انسان احترام رکھا ہے اس کی میں پہلے مثال بیان کرچکا ہوں۔ انسانی جذبات کے احترام کا یہ پہلو بھی تفصیلی ہے اس میں میں نہیں جائوں گا مختصراً بیان کردیتا ہوں۔ اگر کسی پر جھوٹ باندھا جائے توعلاوہ اورنقصانات کے اس کے جذبات کو بھی ٹھیس پہنچتی ہے چنانچہ فرمایا کہ کسی پرجھوٹ نہیںباندھنا خواہ وہ دہریہ ہو، عیسائی ہو، یہودی ہو، ہندوہو، پارسی ہو، بدھ مذہب کاہو، کوئی ہو، لامذہب ہو یا بد مذہب ہو ، غر ض کوئی ہوتم نے اس پر جھوٹ نہیں باندھنا، افتراء نہیں کرنا، تہمت نہیں لگانی یہ ساری چیزیں علاوہ اور خرابیوں کے جذبات کو ٹھیس لگانے والی ہیں کوئی بھی ہواس کے جذبات کا احترام کرنا ہے یہاں تک کہ اس کے اموال جو ہیں ان کی حرمت کوقائم کرنا ہے اس کی عزت کوقائم کرنا ہے۔ اس کی جان کی حفاظت کرنی ہے۔ یہ بحیثیت انسان ہونے کے ضروری ہے یہ نہیں کہا کہ ایک مسلمان کی جان کی حفاظت توہردوسرے مسلمان پر فرض ہے لیکن غیر مسلم کی جان کی حفاظت فرض نہیں ہے بلکہ یہ کہا ہے کہ ہم جان کی حرمت قائم کرتے ہیں اور اسکی حفاظت کی ذمہ داری امت مسلمہ پرڈالدی اور اس میں عربی پر عجمی کو فضیلت نہیں اورعجمی کو عربی پر فضیلت نہیں اورمسلمان پر غیرمسلم کو فضیلت نہیں اورغیر مسلم پر مسلمان کوکوئی فضیلت نہیں سب کو جذبات کے لحاظ سے ایک ہی مقام پر کھڑا کردیا ہے اوریہ بڑی چیز ہے۔ اس واسطے بات کرتے وقت بڑی ہدایتیں دی گئی ہیں ہم بعض دفعہ بڑی لاپرواہی کرجاتے ہیں اوراپنے بھائی سے ایسا مذاق کردیتے ہیں جو اسکو چبھنے والا ہوتا ہے ایسا کرنامنع ہے یہ بات اللہ تعالیٰ کی ناراضگی کا موجب بنتی ہے پس انسان کے اوپر اس کے جذبات کا اتنا خیال رکھنے کی وجہ سے کتنا بڑا احسان کیا گیا ہے۔
    اورچوتھی بات جو اس وقت میں مختصراً بیان کرنا چاہتا ہوںوہ یہ ہے کہ ایک توانسانی جذبات کاخیال رکھا گیا ہے۔ دوسرے یہ کہ جوجذبات شنیعہ بعض لوگوں میں پیدا ہوجاتے ہیں ان کی یلغار سے انسان کو محفوظ رکھا۔ یہ ایک بات ہے جو اپنی جگہ پر ہے (اور بہت ساری باتیں ہیں لیکن میں اختصار کے پیش نظر بہت سی باتوں کو چھوڑتا ہوں کافی دیر ہوگئی ہے) اورہم اس نتیجہ پر پہنچتے ہیں کہ انسانیت زندہ باد کا نعرہ بھی عارفانہ طورپرہمارے سوا اورکوئی نہیں لگا سکتا۔ جو شخص حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی اس محسنانہ شان کی معرفت رکھتا ہو وہی کھڑے ہوکر دوسرے انسان کو مخاطب کرکے یہ کہہ سکتا ہے کہ انسانیت زندہ باد۔ پس ان دونعروں کی طرف میں جماعت احمدیہ کو متوجہ کرتا ہوں اشتراکیت کا یہ حق نہیں ہے کہ وہ انسانیت زندہ باد کا نعرہ لگائے اور نہ کسی اور ازم کا یہ حق ہے صرف اسلام کا یہ حق ہے صرف مسلمان کا یہ حق ہے۔ مسلمانوں میں دوگروہ ہوسکتے ہیں یہ ممکن ہے۔ یعنی ایک وہ جن کے منہ سے عارفانہ طورپر یہ نعرہ نکلے اور ایک وہ جن کے منہ سے محجوبانہ طورپر یہ نعرہ نکلے لیکن یہ نعرہ لگانے کا وہی حق دار ہے جس نے حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے دامن کو مضبوطی سے پکڑا اور آپ کی محبت میں فنا ہوگیا چونکہ آپ انسانیت کے محسنِ اعظم ہیں۔ اس واسطے اس شخص کا یہ حق ہے کہ وہ دوسرے انسان کو مخاطب ہوکر یہ کہے کہ اے انسان!تیری انسانیت ہمیشہ زندہ رہے اور اللہ تعالیٰ کی رحمت کے سایہ میں غیر انسانی یلغاروں سے وہ محفوظ رہے۔
    پس یہ دو نعرے ہمارے نعرے ہیں۔ ختم المرسلین زندہ باد کا نعرہ یا خاتم الانبیاء زندہ باد کا نعرہ یا ختم نبوت زندہ باد کا نعرہ احمدیت کا نعرہ ہے اورہم ہی اسے عارفانہ طورپر بلند کرسکتے ہیں اور اسی طرح انسانیت زندہ باد کا نعرہ ہمارا نعرہ ہے اورہم جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ادنیٰ غلام اورآپ کے مقام کے پہچاننے والے اور اس مقام کے نتیجہ میں اور انسانیت پرآپ نے جو احسان کیا ہے اس کے عرفان کی وجہ سے ہم اس بات کے سزاوار ہیں کہ انسان کو مخاطب کرکے یہ نعرہ لگائیں کہ
    انسانیت زندہ باد
    دوسرے بھی یہ نعرہ لگاتے ہیں ۔ ہم اسے سن کر خوش ہوں گے لیکن ہمارے نزدیک ان کے نعرے محجوبانہ نعرے ہوں گے۔ ان کے نعرے عارفانہ نعرے نہیں ہوں گے۔
    اللہ تعالیٰ ہمیں اس عرفان پر ہمیشہ قائم رکھے اور اللہ تعالیٰ ہمیں ہمیشہ یہ توفیق دے کہ ہم دنیا پر یہ ثابت کرتے رہیں کہ ہم اس بات کے حقدار ہیں کہ
    خاتم الانبیاء زندہ باد
    کانعرہ لگائیں اور ہم ہی اس بات کے حق دارہیں کہ
    انسانیت زندہ باد
    کا نعرہ لگائیں اللہ تعالیٰ کی توفیق سے سب کچھ ہوسکتا ہے۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۲۹ مارچ ۱۹۷۰ء صفحہ۱ تا۶)
    ززز




    شَاوِرْھُمْ میںبتایا کہ شہد کی مکھی کی طرح
    مومنین کی جماعت کی آراء سے استخراج کرو
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۲۷؍مارچ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ۔ غیر مطبوعہ )
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انورنے ان آیات کی تلاوت فرمائی:-

    (اٰل عمران :۱۶۰،۱۶۱)
    اسکے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    ’’اس وقت میں نے تین نکاحوں کا اعلان کرنا تھا لیکن اب میں نے ارادہ کیا ہے کہ اللہ تعالیٰ کی توفیق سے ان نکاحوں کا اعلان مغرب اور عشاء کی نمازوں کے بعد کروں گاایک نکاح جس کا میں نے اعلان کرنا تھاوہ ہمارے مکرم محترم محمد یعقوب خاں صاحب کے صاحبزادہ کیپٹن عبدالسلام صاحب کاتھا دوست دعا کریں کہ اللہ تعالیٰ نے جب ان پر رحم کرتے ہوئے اپنے فضل کے دروازے کھولے ہیں اور اس خاندان کو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے منصب اور خلافت کی اہمیت کو پہچاننے کی توفیق عطا کی ہے اور جہاں ایک دروازہ اس نے اپنی رحمت کا ان پر کھولا ہے وہاں ہزاروں لاکھوں دروازے اسکی رحمت کے ان پرکھلیں۔
    ایک آیت کا کچھ حصہ اور ایک پوری آیت میں نے اس وقت تلاوت کی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ فَاعْفُ عَنْھُمْ تو ان سے درگذر کر۔ عفو کے معنی یہ ہیں کہ ایسا برتائو کرنا ایسا سامان پیدا کرنا کہ جو کمزوریوںاور غفلتوںکے بد نتائج ہوں ان سے وہ شخص جس سے درگذر کیا جائے محفوظ رہے محض یہ معنے نہیں ہیں کہ معاف کردیا بلکہ اس کے اندر یہ معنی بھی آجاتے ہیں کہ اس رنگ میں معاف کیا کہ اگلے کی اصلاح ہوگئی۔ محض معافی جو ہماری زبان میں معافی کہلاتی ہے عربی زبان میں عفو کے محض یہ معنے نہیں ہیں بلکہ عفو کے معنوں کے اندر یہ بات بھی آتی ہے کہ ایسے رنگ میں درگزر کیا جائے کہ اس شخص کی اصلاح ہوجائے اور توبہ کی اسے توفیق ملے کیونکہ توبہ ہی ایک ایسا دروازہ ہے جس سے انسان پچھلے گناہوں کے عذاب اورمضرتوں سے بچتا ہے۔
    پس عفو کے یہ معنی ہوئے کہ ایسے رنگ میں معاف کیا جائے کہ اصلاح ہو اور توبہ کی توفیق ملے اور جوغلطیاں ہوچکی ہیں ان کے بدنتائج سے وہ شخص محفوظ ہوجائے۔ اسی مصدر سے عَافَاہ ُبھی نکلا ہے جسکے معنے ہیں ’’رَفَعَ عَنْہُ کُلَّ سُوْئٍ‘ ‘ یعنی ہر قسم کی تکلیف اور دکھ کو اس سے دور کردیا۔ پس اللہ تعالیٰ نے یہاں حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اورآپ کے غلام نائبین کو یہ حکم دیا ہے کہ مومنوں کی جماعت سے اس طرح کا سلوک کیا جائے کہ درگذر بھی ہواور اصلاح بھی ہو اور بدنتائج سے ان کی حفاظت بھی ہو۔
    دوسرے فرمایا وَاسْتَغْفِرْ لَھُم ْ اسکے معنی لغت کے لحاظ سے یہ ہیں کہ اللہ تعالیٰ سے یہ بھی دعا کرو کہ اللہ تعالیٰ ان کی کمزوریوں اور غفلتوں اور گناہوں کے بد نتائج اور عذاب سے ان کی حفاظت کرے یعنی خود بھی یہ کوشش کرو کہ جو غفلتیں ہوگئی ہیں ان کے بد نتائج سے وہ محفوظ ہوجائیں اور اپنی کوشش پر ہی بھروسہ نہیں کرنا بلکہ اللہ تعالیٰ کے حضور جھک کر اس سے یہ بھی استدعا کرنی ہے کہ مومنوں کی جماعت اگر بشری کمزوریوں کے نتیجہ میں باوجود مخلص اور فدائی ہونے کے غفلتیں کر جائیں تو اے خدا!تو ان کی مدد کو آ اور ان کی کمزوریوں گناہوں اور غفلتوں کو اپنی مغفرت کی چادر میں ڈھانپ لے اور ایسے سامان پیدا کردے کہ ان کی اصلاحِ احوال ہوجائے۔
    پس صرف یہ معنے نہیں ہیں کہ اللہ تعالیٰ ان کو زبان سے توبہ کی توفیق دے کیونکہ مغفرت کے معنی میں قول اور فعل سے مغفرت طلب کرنا ہے غرض یہاں یہ دعا ہے کہ اے خدا! تو ان لوگوں کو یہ توفیق دے کہ اپنی زبان سے بھی تیرے حضور توبہ کرتے ہوئے عاجزانہ طورپر گرجائیں اور اپنے افعال کی بھی اس طرح اصلاح کریں کہ دنیا بھی یہ مشاہدہ کرے کہ ان لوگوں کی زندگیوںمیں ایک تبدیلی پیدا ہوگئی ہے۔
    اقرب میں ہے’’اَصْلَحَہٗ بِمَا یَنْبَغِیْ اَنْ یُّصْلِحَ بِہٖ‘‘۔ یہ بھی استغفار کے معنوں کے اندر ہے کہ اللہ تعالیٰ ایسے سامان پیدا کردے یا انسان کو ایسے ذرائع میسر آجائیں کہ جو اصلاح احوال کاسامان پیدا کردیںپھر چونکہ اس رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو ابدی زندگی عطا کی گئی ہے اور یہ ابدی زندگی دو رنگوں میں ہمارے سامنے آتی ہے ایک تو آپ کا افاضہ روحانی قیامت تک جاری ہے اور دوسرے آپ سے اِنَّـآ اَعْطَیْنٰـکَ الْکَوْثَرَ میں اور بعض دوسری جگہ بھی یہ وعدہ ہے کہ قیامت تک محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے غلام او ربندے پیدا ہوتے رہیں گے جو آپ کے دین کی مدد کرنے والے ہونگے اللہ تعالیٰ سے تعلق پیدا کرنے والے ہونگے اور قرآن کریم کے ظاہر وباطن کی حفاظت کی فرشتوں کی طرح وہ بھی توفیق پائیں گے۔
    پس فرمایا کہ ایک توکوشش کروکہ جماعت مومنین کی اصلاح ہوجائے دوسرے ان کے لئے بڑی دعائیں کرو کہ وہ اپنی غلطیوں کے بد نتائج اور اللہ تعالیٰ کی ناراضگی سے محفوظ رہیں اور اپنی زبان سے بھی توبہ کرنے والے ہوں اور ان کے اعمال بھی دُھلے ہوئے صاف شفاف کپڑے کی طرح ہوجائیں اور اللہ تعالیٰ کی رضا کی کرنیں ان کے وجود میں سے باہر آرہی ہوں یہ کرنے کے بعد شَاوِرْھُمْ فِیْ الْاَمْرِ (اٰلِ عمران :۱۶۰) پھر یہ جماعت اس بات کی مستحق ہوگی کہ ان سے مشورہ کیا جائے۔
    آج جب میرے ذہن کو اس طرف متوجہ کیاگیا کہ میں اس آیت پر خطبہ دوں تو میں نے پھر اقرب اور لغت کی بعض دوسری کتابیں دیکھیں چنانچہ ایک بڑی اور حسین چیز میرے سامنے آئی اوروہ یہ کہ مشاورت جو ہے اس کا روٹ یعنی اس کا مخرج شَارَ الْعَسْلَہے یعنی شہد نکالنا۔ اور اس شَارَالْعَسْلَکے معنے ہوتے ہیں اِسْتَخْرَجَہٗ وَاجْتَنَاہُ جس طرح مکھی کا جوکام ہے نا پھول سے اپنی مرضی کے مطابق وہ چیز حاصل کرنا جس سے مکھی نے شہد بنانا ہے یعنی Nectar(نیکٹر) جو پھول سے لیتی ہے۔ شہد کی مکھی کے بارے میں اب جو نئی تحقیق ہوئی ہے اس سے یہ پتہ لگتا ہے کہ وہ اپنی مرضی سے ایک پھول کا انتخاب کرتی ہے اور پھر اس پھول سے وہ شہد بناتی رہتی ہے یعنی پھول کا ایک حصہ لیتی ہے اور اپنے جسم کا ایک حصہ اس میں داخل کرتی ہے اس طرح پر شہد بنتا ہے۔بہت سے دوستوں کو اس کا علم نہیں وہ سمجھتے ہیں کہ شہد صرف پھولوں کے رس سے بنتا ہے۔ یہ درست نہیں ہے شہد میں قریباً پچاس فیصد پھول کے رس کا حصہ ہے اورقریباً پچاس فیصد مکھی کے اپنے غدود میں سے ایک چیز نکلتی ہے مختلف قسم کے Enzymes (انزائمز( اور مختلف قسم کی دوسری چیزیں وہ شہد میں ملاتی ہے یعنی وہ جو پھول کا حصہ ہے اس کے اندر ملاتی ہے تب جاکر شہد بنتا ہے۔
    پس دونوں برابر کے حصے جارہے ہیں جہاں تک اسکے معنے کا سوال ہے لیکن جہاں تک محنت اور کوشش کا سوال ہے حقیقت یہی ہے کہ پھول نے شہد بنانے کے لئے کوشش نہیں کی کبھی پھول نے بھی جاکر اپنے شہد کو مکھیوں کے چھتے تک پہنچایا ہے شہد کی مکھی جو ہے اس کی ساری کوشش شہد بنانے کی ہے اور اسطرح اللہ تعالیٰ کی وحی کے مطابق وہ اپنے اس کام میں لگی ہوتی ہے۔
    جن لوگوں نے شہد کی مکھیوں اور ان کے چَھتّوں پر تحقیق کی ہے وہ یہ کہتے ہیں کہ شہد کی مکھی کے چھتے کے نیچے کبھی کوئی مردہ مکھی نہیں ملے گی اور وہ اس کی وجہ یہ بتاتے ہیں کہ کام کرتے ہوئے کبھی پھول کے قریب ،کبھی پھول اوراپنے چھتے کے درمیان مرکرگر جاتی ہے یعنی وہ اپنے کام کے لحاظ سے ایک قسم کی شہید ہی ہے کام کے اندر اسکی جان نکلتی ہے وہ آخری سانس تک کام کرتی رہتی ہے۔
    مکھی پھول کے اندر سے اپنی مرضی سے انتخاب کرکے وہ حصہ جسے انگریزی میں Nectar (نیکٹر) کہتے ہیںتھوڑا سا پتلا مایہ ہوتا ہے جو شہد کی طرح کا قوّام نہیں رکھتا بلکہ شہد کی نسبت پھول میں اس چیز کی حالت پانی کے زیادہ قریب ہے لیکن مکھی پھر اسے وہاں سے لے کر آتی ہے پھر اسکو اپنی زبان پر رکھ کر خشک کرتی ہے اورہزاروں لاکھوں دفعہ زبان باہر نکال کر اندر منہ میں لے جاتی ہے اور اس حرکت سے وہ اسے قوّام کی شکل دیتی ہے پھر اپنے Enzymes (انزائمز) بیچ میں ملاتی ہے تب جاکر وہ شہد بنتا ہے تب ہمیں وہ شہد ملتا ہے اورہم اللہ تعالیٰ کا ہزارہزار شکر کرکے شہد کے چھوٹے سے حصہ کو چاٹتے ہیں پورے احساس کے ساتھ کہ اگر یہ کام شہد کی مکھی کی بجائے انسان کے سپرد ہوتا تو شاید لاکھ دولاکھ روپے کاایک سیر شہد ملاکرتا اور یہ بات ایک عام انسان کی طاقت سے باہر ہوتی ہاں شیطان انسان جو ہے اسکی طاقت کے اندر ہوتی۔
    پس اصل مشاورت کا مخرج شَارَالْعَسْلَکا جو عربی میں محاورہ ہے اس میں شوریٰ کا جولفظ ہے وہ ہے اور اس سے پھر آگے مشاورت نکالی اور مشورہ اور شوریٰ کا مضمون اس مثال سے بہت واضح ہوجاتا ہے یعنی جو مضمون یہاں بیان ہوا اگر یہ مضمون سامنے نہ ہو تو بہت سے پہلو مخفی رہ جائیں۔
    اس میں ایک تویہ آگیا ہے کہ یہ فیصلہ کرنا کہ کن پھولوں کا شہد یاکن انسانوں کی آراء طلب کرنی ہیں یہ حضرت نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم یا آپ کے نائبین کا کام ہے پھول کایہ کام نہیں ہے کہ وہ مکھی کو یہ کہے کہ تم گلاب کے پھول پرکیوں جارہی ہو جب کہ تم سے زیادہ قریب شیشم کا پھول موجود ہے یہ پھول کاکام ہی نہیں اور نہ اسکو اللہ تعالیٰ نے یہ طاقت دی ہے یہ مشاورت کرنے والے مشورہ لینے والے کا کام ہے کہ وہ کن لوگوں سے مشورہ لے جس کا نتیجہ یہ ہے کہ مختلف شکلیں ہمیں حضرت نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں نظر آتی ہیں۔ آپ کے بعض ایسے مشیر بھی تھے کہ مجھے یہ شبہ ہے میری طبیعت پر یہ اثر ہے کہ شاید تاریخ نے بھی ان سب کے نام محفوظ نہیں رکھے کیونکہ آپ ان کو خفیہ طور پر بلا لیتے تھے اور جس معاملے کے متعلق مشورہ لینا ہوتا آپ ان سے مشورہ لے لیا کرتے تھے بعض کے نام آئے ہیں اس سے ہمیں پتہ لگ گیا کہ اس طرح بھی آپ مشورہ لیتے تھے اور بعض دفعہ آپ سب کو جمع کرلیتے تھے بعض دفعہ نمائندے آ جاتے تھے اور آپ کی یہ سنت تھی اور خلفائے راشدین کی بھی یہ سنت تھی اس وقت بھی یہ سنت تھی جس زمانے میں بھی یہ رہی ہے کہ نمائندگی کے طور پر ساری جماعت تو یہاں اکٹھی نہیں ہوسکتی۔ زیادہ سے زیادہ یہ ہوسکتا ہے کہ مشورہ کے لئے ربوہ کے مکینوں کو اکٹھا کر لیا جائے چونکہ جماعت پھیل گئی اللہ تعالیٰ نے بڑا فضل کیا ایک آواز جو ایک منہ سے نکلا کرتی تھی اب وہی آواز لاکھوں کروڑوں کے منہ سے نکل رہی ہے سارے اکٹھے ہو کر کس طرح رائے دے سکتے ہیں یا ان سے رائے لی جاسکتی ہے نمائندگی کا اصول ہمیں چلانا پڑے گا مگر جب ضرورت ہوتو دوسری طرح بھی مشورہ ہوجائے گا۔
    پس شَاوِرْھُمْ میں بتایا گیا ہے کہ جس طرح شہد کی مکھی پھول سے شہد کا استخراج اور اجتنا کرتی ہے اسی طرح تم مومنین کی جماعت کی آراء کا استخراج کرو کیونکہ شَاوِرْ کے معنے استخراج الرائے اورشَارَالْعَسْلَ کے معنے استخراج العسل یعنی شہد کا نکالنا مثال بالکل واضح ہوگئی ہے ایک فرمایا کہ جس طرح اورجن سے چاہو آراء لو۔
    وہ جو دوسرا حصہ تھا کہ اپنی بیچ میں ملاکر اپنے جسم کی اپنی روح کی اور اپنے ذہن کی جب تک(اگر انسانی مثال ہو) ساتھ نہ ملائی جائے شہد نہیں بنتا وہ مشورہ درست نہیں رہتااس واسطے فَاِذَاعَزَمْتَ۔ وہ عزم جو ہے و ہ مکھی والےEnzymes(انزائمز)کی آمیزش ہے کہ جب آراء لے لیں وہ سامنے آگئیں پھر اپنے عزم اسکے اندر ملائو اور پھر وہ فیصلہ بنے گا ورنہ جب تک رسول یا نائب رسول کی اپنی رائے اپنا عزم اپنا فیصلہ اپنے Enzymes(انزائمز)(اس مثال کے لحاظ سے جو پھول سے حاصل کیا گیا اورمومنین کی جماعت سے یاان کے نمائندوں سے آراء کی شکل میں حاصل کیا گیا)اسکے اندر شامل نہ ہوں۔ اس وقت تک نہ شہد بنے گااور نہ وہ جو آراء دیں وہ پختہ بنیں گے اور مفید ہونگی اور نہ ایسی بنیں گی کہ جن کے اندر شفاء ہو اور شفاء میںبھی اللہ تعالیٰ نے دونوں کو برابر کردیا ۔ شہد کے اندربھی کہہ دیا کہ اسکے اندر شفاء ہے اور جس رنگ میں احکام الٰہی کا اجراء کرنا ہے اسکے متعلق یہ کہا کہ اسکے اندر شفاء ہے۔
    پس تیسری چیز یہ بتائی کہ شَاوِرْھُمْ خالی آراء کافی نہیں بلکہ خود دعا کرکے اور اللہ تعالیٰ سے ہدایت طلب کرکے اور اپنی خداداد فراست کو استعمال کرکے(یہ کتنی قسم کی Enzymes (انزائمز) ہیں اگر ان کو بطور مثال Enzymesہی کہا جائے)وہ ان آراء میں شامل کر و تب جاکر وہ چیز ایسا قواّم اختیار کرے گی کہ بنی نوع انسان کے لئے وہ شفاء بن جائے گی تدبیر اپنی انتہاء کو پہنچ گئی۔ یہاں تو فرمایا کہ تدبیر کرو جو اہم امور ہیں امت مسلمہ کے استحکام کے لئے اور تمکینِ دین کے لئے اور اصلاحِ انسانیت کے لئے اور تبلیغ واشاعت کے لئے بڑے امور ہیں تم پہلے تو ایک ایسی قوم تیار کرو کہ جوNectar(نیکٹر)پیدا کرسکے یعنی بعض دفعہ ویسے تو اللہ تعالیٰ نے ہر پھول میں Nectar(نیکٹر) یعنی وہ چیز پیدا کی ہے جو شہد کا ایک حصہ بن جاتی ہے لیکن بعض دفعہ ایسا حادثہ ہوتا ہے کہ پھول نظر آتاہے لیکن وہ حصہ غائب ہوتا ہے کوئی بیماری ایسی بھی آجاتی ہے پس اگرچہ وہ پھول ہے اور عام پھول میں Nectar(نیکٹر) بھی ہے جو شہد کا جزو بھی ہے لیکن اس حادثہ کی وجہ سے شہد نہیں بن سکتا اسلئے فرمایا کہ امتِ مسلمہ کو یا جماعت مومنین کو ایسا بنائو کہ وہ صاحب الرائے ہوں اور ایسے ہوں کہ جن سے شہد کا ایک جزو Nectar (نیکٹر) جو ہے یا رائے کی اصابت جو ہے وہ ان سے حاصل کی جاسکے اور ان کا نفس بیچ میں نہ آئے۔اب جو پھول ہے اس کا نفس بیچ میں نہیں آتا کوئی شخص کہہ سکتا ہے کہ بیچارے پھول نے اپنا نچوڑ شہد کی مکھی کے حضور پیش کردیا اورآپ وہاں کھڑا ہے تو اس کا نفس تو بیچ میں نہیں آیا اس نے تو اپنے نفس کی بہترین چیز تھی اسکو اسکے حضور پیش کردیا جسکی طرف اللہ تعالیٰ کی وحی تھی یعنی شہد کی مکھی کہ تم نے شفا کے سامان پیدا کرنے ہیں ایک ایسی جماعت بنے جو تقویٰ اور طہارت کی بنیادوں پر اپنی زندگیوں کو گزارنے والی ہو اللہ تعالیٰ سے جن کا تعلق پیدا ہو جن کا دعائوں پر زور ہو جو واقعہ میں امتِ مسلمہ ہو یعنی ان کا اپنا کچھ بھی باقی نہ رہے اپنا سب کچھ اپنا وجود بھی اپنا ذہن بھی اپنی فکر بھی اپنی ساری قوتیں اورطاقتیں اور زندگی اور موت سب خدا کے حضور پیش کردیں۔ یہی اسلام ہے اسکے بغیرتو کوئی اسلام نہیں ہے۔
    غرض فرمایا عفو اور استغفار کے ذریعہ ایک ایسی جماعت بنائو جو صاحب الرائے ہو مغلوب الغضب نہ ہو دھیمی ہو فدائی ہو مشورہ دیتے وقت یہ نہ سوچے کہ پھر اسکے بعد ہم پر کتنی ذمہ داریاں عائد ہوجائیں گی مشورہ دیتے وقت صرف یہ سوچے کہ آج اسلام کی زندگی کی بقاء اور احیاء اور اشاعت اور اسکے استحکام کے لئے جن چیزوں کی ضرورت ہے وہ ہمیں پیش کر دینی چاہئیں خواہ ہم بھوکے رہیں یا ہمارے بچے بھوکے رہیں یا ان کو کھانے کے لئے کچھ ملے۔ خواہ ہم زندہ رہیں یا ہمیں اپنی جانوں کی قربانی دینی پڑے ہمیں اپنا سب کچھ خدا کے حضور پیش کردینا ہے۔ یہ جماعت جب پیدا ہوجائے پھر ان کا یہ حق بن جاتا ہے کہ وہ صاحب الرائے ہیں کیونکہ ان سے مشورہ لیا جاتا ہے شہد کاایک جزو تیار ہوگیا۔ دوسرا جزو عزم کے ساتھ تعلق رکھتا ہے اور عزم انہوں نے نہیں کرنا۔ انہوں نے توجو کچھ تھا پیش کردیا تھا جس طرح چاہیں آپ اسکو استعمال کرسکتے ہیں۔ پھول زبان حال سے مکھی کو یہی کہتا ہے کہ میرا نچوڑ تیرے حضور پیش، ُتو اب جس طرح چاہے اسکو استعمال کرلے اورجس طرح چاہے وہ استعمال بھی کرتی ہے کیونکہ اس میں اپنےEnzymes(انزائمز)ملاتی ہے اسکو خشک کرتی ہے قوّام بناتی ہے اپنے Enzymes(انزائمز) ملاتی ہے اور پھر وہ فیصلہ کرتی ہے (اس میں انسان کا بھی تھوڑا سا دخل ہے) لیکن اصل اسی کا فیصلہ ہے کہ میں نے کچھ انسان کو دینا ہے اور بیچ میںسے بہت کچھ خود کھا لینا ہے اور اس طرح انسا ن کے ہاتھ میں شفاء کی ایک چیز آجاتی ہے چنانچہ پھر یہ کہنا کہ صرف آراء کے اوپر نہیں چھوڑنی بات۔ اگر صرف رائے پر چھوڑنی ہوبات، تو کثرت رائے کی پابندی ضروری ہوجائے مگر ابھی تو شہد ہی نہیں بنا ابھی تو اس میں شفاء ہی نہیں پیدا ہوئی کثرت رائے پر کیسے چھوڑا جا سکتا ہے؟ پھر کہا کہ عزم اپنے تمام پہلوئوں کے ساتھ ہر قسم کی Enzymes (انزائمز)مثال کے طور پراسNectar(نیکٹر) میں، اُس پھول کے جزو میں تم شامل کرو اور پھر عزم جو ہے اسکے اندر دعاکا حصہ بھی آجاتا ہے کیونکہ عزم کے دومعنے ہیں ایک تویہ عزم کرنا کہ یہ کام ہم نے ضرور کرنا ہے یہ بھی لغوی طور پرعزم کے معنے میں ہے کہ پھر اس کام کی سرانجام دہی کے لئے انتہائی کوشش کرنا۔ اور’’جَدَّ فِی الْاَمْرِ‘‘جو عربی میں اسکو کہا گیا ہے اسکے متعلق حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ہمیں بتایا ہے کہ تدبیر دعا ہے اور دعا تدبیر ہے تو دعا کا پہلو بھی اسکے اندر آجاتا ہے۔ پس کہا کہ تم اپنا عزم اس رائے کے بیچ میں شامل کرو اور انتہائی دعائوں کے ساتھ ایک ایسی چیز ایک ایسا شہد بنائو ایک ایسا فیصلہ کرو جو اسلام کے استحکام کے لئے ضروری ہے اور جو کمزورایمان والوں کے لئے شفا ہے اور جو Prophylactic (پرافیلیکٹک)کے طور پر بیماریوں سے محفوظ رکھنے والا ہے تربیت،علاج اوراصلاح دونوں چیزیں اسکے اندر آجاتی ہیں۔ پس تربیت تو Prophylactic(پرافیلیکٹک) یعنی بیماریوں سے بچانے کا کام ہے اور یہ ساری چیزیں اسکے اندر آجاتی ہیں۔
    غرض فرمایا کہ جماعت تیار کرو اور پھر ان سے مشورہ لو اور یہ آگے جو مشورہ کا ہے اس کی مثال دے دی کہ اسکی مثال ایسی ہے جیسے شہد کی مکھی شہد بنارہی ہو۔ آراء لو پھر اپنے عزم کو اپنی ہمت کو اپنی کوشش کو اپنی دعائوں کو اسکے اندرشامل کرواس مقام پر انسانی تدبیر اپنی انتہاکوپہنچ جائے گی لوگ اکٹھے ہوئے انہوں نے مشورہ دیا رسول یا نائب رسول نے اپنے عزم کی Enzymes(انزائمز)اس میں شامل کیں دعائیں بیچ میں شامل کیں اورتدبیر کو انتہاء تک پہنچا دیا اور جس وقت تدبیر انتہاء کو پہنچ گئی تو اللہ تعالیٰ نے فرمایا فَتَوَکَّلْ عَلَی اللّٰہِ تدبیر پر بھروسہ نہیں کرنا۔ یہ صحیح ہے کہ ہماری ہدایت کے مطابق تم نے اپنی تدبیر کو اسکی انتہاء تک پہنچا دیا لیکن یہ بھی درست ہے کہ محض تدبیر پر بھروسہ نہیں کیا جاسکتا کیونکہ جتنی بے وفائیاں دنیا کی تدابیر نے انسان سے کی ہیں ان کا کوئی شمارنہیں تدبیر پر کیسے بھروسہ کیا جا سکتا ہے؟ ہم نے حکم دیا تھا تدبیر کو انتہاء تک پہنچائو تم نے تدبیر کو انتہاء تک پہنچادیا اب ہم تمہیں کہتے ہیں کہ اپنی تدبیر کو انتہاء تک پہنچانے کے بعد بھی تم نے تدبیر پر بھروسہ نہیں کرنا فَتَوَکَّلْ عَلَی اللّٰہِ اللہ تعالیٰ پر بھروسہ کرنا ہے۔
    پھر ایک اوردعا بھروسہ کے ساتھ ہی شروع ہوجاتی ہے اللہ تعالیٰ پر توکل جو ہے اس کے ساتھ دوسری دعا جو ہے و ہ شروع ہوجاتی ہے اور جو آراء لی تھیں اور کثرت رائے کے حق میں یا خلاف جو بھی شکل شہد کی بنی وہ بن گئی۔ پس یہاں محض یہ نہیں کہا کہ اے رسول! تمہارا عزم شامل ہوگیا۔تم نے اللہ تعالیٰ کی تدبیر کو انتہاء تک پہنچا دینے کے بعد تدبیر پر بھروسہ نہیں کرنا اللہ پر توکل کرنا ہے۔ مومنوں کو یہ کہا کہ تم یہ نہ سمجھنا تمہاری آراء کے ساتھ نائب نبوّت کا عزم اور ہمت اور کوشش اوردعا مل جانے سے تم کامیاب ہوجائو گے۔ تم بھی یہ یاد رکھو اسکے باوجود تم بھی کامیاب نہیں ہوسکتے بلکہ تم کو اللہ پر بھروسہ رکھنا پڑے گا اور دوسری آیت میں فرمایا وَعَلَی اللّٰہِ فَلْیَتَوَکَّلِ الْمُوْمِنُوْنَ(اٰل عمران:۱۶۱) ایک حکم دیا تھا نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کی وساطت سے آپ کے نائبین کو اور دوسرا حکم دیا جماعتِ مسلمین کو وَعَلَی اللّٰہِ فَلْیَتَوَکَّلِ الْمُوْمِنُوْنَ میں اسی طرف اشارہ ہے اور اس میں جماعتِ مؤمنین کو مخاطب کرکے یہ کہا کہ یہ بات نہ بھولنا کہ اگر اللہ تعالیٰ تمہاری مدد کو آجائے تو دنیا کی کوئی طاقت تمہیں ناکام نہیں کرسکتی اور اگر اللہ تعالیٰ کی نصرّت تمہیں سہارا نہ دے تو دنیا کی کوئی طاقت تمہیں کامیاب نہیں کرسکتی۔اس واسطے جیسا کہ یہ حکم حضرت نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو دیا گیا کہ تدبیر کو انتہاء تک پہنچانے کے بعد اپنے اوپر اوراپنی تدبیر پر بھروسہ نہیں کرنا بلکہ محض اللہ تعالیٰ پر تو ّکل رکھنا ہے اسی طرح جماعتِ مؤمنین کو کہا کہ یہ نہ سمجھنا مثلاً اس زمانے میں فدائی جانثار پوری عظمت اور جلال محمدصلی اللہ علیہ وسلم کی فراست رکھنے والے اور عرفان رکھنے والے مگر شیطان ان کا دماغ اس طرح بھی بہکا سکتا تھا کہتا کہ اتنا عظیم وجود تمہارے اندر موجود ہے اس کی فراست، اس کا عزم، اس کی ہمت، اس کی دعائیں اب اس تدبیر میں شامل ہوگئی ہیں۔ اب تو تم کامیاب ہو جائو گے شیطان ان کے کان میں یہ پھونک سکتا تھا اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ اے جماعتِ مؤمنین! اگر شیطان تمہارے کان کے پاس منہ لاکر یہ کہے کہ جو تم نے کرناتھا کرلیا اب تم کامیاب ہوجائو گے تو اس کی آواز پر کان نہ دھرنا بلکہ یہ اصولی حقیقت یاد رکھنا کہ جس طرح محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کے نائبین کو تدبیر کے انتہاء تک پہنچا دینے کے بعد بھی تو ّکل کا حکم ہے اسی طرح تمہیں بھی تو ّکل کا حکم ہے اور تمہیں یہ یاد رکھنا چاہئے کہ اگر تم نے اپنی تدبیر پر بھروسہ کیاتو ممکن ہے کہ اللہ تعالیٰ تمہیں مدد نہ دے اور اللہ تعالیٰ کی مدد کے بغیر تم کامیاب اور کامران نہیں ہوسکتے اور اگر تم نے تدبیر کو انتہاء تک پہنچانے کے بعد رسول کے قدم بقدم تو ّکل کے میدان میں چلتے ہوئے محض اللہ تعالیٰ محض اللہ تعالیٰ پر تو ّکل کیا اور اپنی کوشش اور تدبیر اور فراست اور سمجھ اور بوجھ کوکوئی حقیقت نہ سمجھا اور کوئی اہمیت نہ دی تو پھر اللہ تعالیٰ کی نصرت تمہیں ملے گی اور جب اللہ تعالیٰ کی نصرت کسی شخص یا کسی قوم یا کسی جماعت یا کسی نسل کو مل جائے تو پھر دنیا کی کوئی طاقت ان کی کامیابی کے راستے میں روک نہیں بن سکتی یہ ہدایت اور تعلیم ہے جو مشورہ کے متعلق ہمیں دی گئی ہے۔
    آج شوریٰ کے اجلاس شروع ہورہے ہیں کم وبیش تین دن تک شوریٰ رہتی ہے۔ آپ اس ہدایت کے مطابق پوری توجہ اور انہماک سے اور اونگھنے کے بغیر اپنی ذمہ داری کو نبھائیں یعنی جب آپ سے مشورہ مانگا جائے تو بے نفس مشورہ دیں جس طرح پھول اپنے جزو شہد کو مکھی کے سامنے پیش کر دیتا ہے۔پھول کا اپنا نفس اس میں شامل نہیں ہوتا وہ تو کہتا ہے جو میرا نچوڑ تھاوہ لے جائو میں یہاں بغیر اپنی زندگی اور روح اور Essence(ایسنس) کے ہوں۔ پس اس یقین کے ساتھ ، اس پاک فطرت کے ساتھ اور اس فیصلے کے ساتھ کہ ہم نے اپنی ذات یا اپنے محلے کے متعلق نہیں سوچنا ہے نہ اپنے شہر اوراپنے علاقے کے متعلق سوچنا ہے بلکہ جو معاملہ سامنے آیا ہے صرف اس بات کا خیال رکھنا ہے کہ ہمارے نزدیک ہماری سمجھوں کے مطابق اسلام کے غلبہ کے لئے کیا رائے دینی چاہئے اوروہ رائے آپ دیں۔
    غرض جو تفصیل میں نے بیان کی ہے اسکے مطابق اپنے ذہنوں کو بنائیں اور دعائیں کریں کیونکہ دعا بھی تدبیر کا ایک حصہ ہے جیسا کہ میں نے ابھی بتایا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہمیں صراطِ مستقیم پر قائم رکھے اور اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق دے کہ ہم محض اسی پر تو ّکل کریں اورہمارے فیصلوں میں اسکی رحمت اور اسکی برکت اور اسکا فضل شامل رہے تا اللہ تعالیٰ ہمیں اس مقصد میں کامیاب کرے کہ تمام دنیا پر اسلام غالب آجائے۔
    (از رجسٹر خطبات ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز








    اللہ تعالیٰ کے نام سے اور اُسی پر بھروسہ کرتے
    ہوئے مغربی افریقہ کے دورہ پر جا رہا ہوں
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۳؍اپریل ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاورسورۂ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    اللہ تعالیٰ کے نام سے اور اسی پر بھروسہ کرتے ہوئے میں انشاء اللہ تعالیٰ کل صبح مغربی افریقہ کے دورہ پر روانہ ہوں گا۔ ربوہ اورآپ دوستوں کی اس عارضی جدائی سے طبیعت میں اداسی بھی ہے اللہ تعالیٰ کے اس فضل پر خوشی بھی ہے کہ وہ محض اپنی رحمت سے یہ توفیق عطاکررہا ہے کہ ان اقوام کے پاس جاکر جو صدیوں سے مظلوم رہی ہیں اور صدیوں سے حضرت نبی اکرام صلی اللہ علیہ وسلم کے ایک عظیم روحانی فرزند مہدی معہود کی انتظار میں رہی ہیںاور جن میں سے استثنائی افراد کے علاوہ کسی کو بھی حضرت مسیح موعود و مہدی معہود علیہ السلام کی زیارت نصیب نہیں ہوئی پھر ان کے دلوں میں یہ تڑپ پیدا ہوئی کہ آپؐ کے خلفاء میں سے کوئی خلیفہ ان تک پہنچے اور اللہ تعالیٰ اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے نام پر ان کو ہدایت کی طرف اور ان کو ر شد کی طرف اور اللہ تعالیٰ کے قرب کی طرف بلائے اور وہ خَلِیْفَۃً مِنْ خُلَفَائِہٖ کی زیارت سے اپنی آنکھوں کو ٹھنڈا کریں اور ان کی طبیعتیں ایک حد تک سیری محسوس کریں۔ چنانچہ صدیوں کے انتظار کے بعدا للہ تعالیٰ نے چاہا تو انہیں یہ موقعہ نصیب ہوگادعا ہے کہ یہاں میری موجودگی میں بھی آپ ہمیشہ ثبات قدم پر مضبوطی سے قائم رہیں اور اللہ تعالیٰ کے دامن کو کبھی ہاتھ سے نہ چھوڑیں اورمیری غیر حاضری میں بھی اللہ تعالیٰ آپ کے لئے صدق وثبات اور وفا کے سامان اورصدق وثبات اور وفا اور محبت کی فضا پیدا کرتا رہے اورہمارا ان ممالک کی طرف جانا ان کے ثبات قدم کا موجب بنے اور جذبہ وفا میں شدت کا موجب ثابت ہو اور وہ قومیںمحبت الٰہی میں اور بھی آگے بڑھیں اور وہ جو ابھی تک اندھیروں میں بھٹکتے پھررہے ہیں انہیں بھی روشنی کی وہ کرن نظر آجائے جو اسلام کی شاہراہ کو منور کررہی ہے اور بنی نوع انسان کو اس طرف بلار ہی ہے ظلم کے پھندوں سے وہ آزاد ہوجائیں اوراللہ تعالیٰ کی محبت میں وہ گرفتار ہوجائیں۔ اللہ تعالیٰ شیطانی ظلمات سے انہیں نجات دے اور وہ جو نُورُالسَّمٰوَاتِ وَالْاَرْضِ ہے اس کے نو رسے ان کے دل و سینہ منور ہوجائیں اور خدا تعالیٰ ایسے سامان پیدا کرے کہ ہمارا جو قدم ہرروز اپنی فتح اوراپنے مقصود کے حصول میں ہماری جو جدوجہد ہے اس کے کامیاب اختتام اور غلبۂ اسلام کی طرف بڑھ رہا ہے وہ قدم اور بھی تیزی کے ساتھ اپنے مقصود اور مطلوب کی طرف اللہ تعالیٰ کے سہارے اور حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کے طفیل بڑھنے لگے اور ان ممالک میں بھی(ساری دنیا میں ہی) آخری فتح اور غلبہ کے دن جلد آجائیں تاکہ بنی نوع انسان اس بھیانک عذاب سے محفوظ ہوجائیں جس کی طرف وہ خود اپنی جہالت کے نتیجہ میں بڑھ رہے ہیںمیری غیر حاضری میں بھی آپ محبت اور پیار سے رہیں۔ میری موجودگی میں بہت سے غریبوں اور مسکینوں کو یہ سہارا ہوتا ہے کہ اگر انہیں کوئی تکلیف پہنچی تو وہ فوراً میرے پاس پہنچیں گے اور ان کے دکھ کا مداوا ہوجائے گا بعض نادان اپنی نادانیوں سے رعب خلافت کے قرب کی وجہ سے بچے رہتے ہیں اورجب خلافت کا قرب عارضی طورپر اس طرح نہ رہے اوران کی اپنی جہالت کی وجہ سے وہ احساس کند ہوجائے جو خلافت کے رعب کا احساس ہے تو پھر شیطان ان سے جہالت کے کام بھی کروادیتا ہے اس قسم کے نادان دماغ کو میں یہ کہوں گا کہ خلیفہ وقت کے لئے نہیں خدا اور اس کے رسول کے لئے اپنے بھائیوں سے محبت کرو اوراپنی نادانیوں کے نتائج سے اپنے نفس اوراپنے خاندان اور اپنی نسلوں کو محفوظ رکھنے کی کوشش کرتے رہو ہم سب اللہ تعالیٰ کی رضا کے لئے اپنے جذبات کو قابو میں رکھیں اورجیسا کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے تاکید اً وصیت کی ہے۔ ہم ہرایک کے ساتھ خیرخواہی اور ہمدردی سے پیش آئیں۔ اپنے نفس کو جس پر بعض دفعہ شیطان سوار ہوجاتا ہے اس گھوڑے کی طرح نہ چھوڑدیں کہ جو شیطان بھی آئے اس پر سوار ہوجائے بلکہ یہ نفس ہمیشہ (اگر اس کی گھوڑے کی مثال ہوتو یہ ایک)ایسا گھوڑا رہے جس پر اللہ تعالیٰ کی رضا ہمیشہ سوار رہے اور جس کی لگام ہمیشہ اللہ تعالیٰ کی محبت کے ہاتھ میں رہے ورنہ توگرپڑنا اور ہلاک ہوجانا یقینی ہوجاتا ہے اللہ تعالیٰ فضل کرے۔
    پس محبت اور پیار سے اپنے دن گزاریں اور صدقہ اور دعائوں کے ساتھ میری مدد کریںجو کام میرے سپرد ہے اور جس کی آخری ذمہ داری ان کمزور کندھوں پر رکھی گئی ہے وہ صرف میراکام نہیں بلکہ ساری جماعت کاکام ہے خدا تعالیٰ کے حضور جواب دہی بڑی سخت ہے غرض خلافت کے قیام کے ساتھ جماعت کی ذمہ داریاں کم نہیں ہوجایا کرتیں بلکہ اور بھی بڑھ جاتی ہیں کیونکہ جب خلافت نہ رہی عوام کہہ سکتے تھے کہ اے ہمارے رب! اگر ہمیں حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے خلفاء میں سے کوئی ہدایت کی طرف بلانے والاہوتا اوراگر ہمیں پیاراور غصہ کے ساتھ ان حدود کے اندر رکھنے والا کوئی ہوتا جن حدود کوتونے قائم کیا تو نہ ہم بھٹکتے اورنہ شیطان کی یلغار ہم پر کامیاب ہوتی لیکن جب خلافت قائم ہو اور اللہ تعالیٰ کے بے شمار فضل اور اس کی بے شمار رحمتیں جماعت پر نازل ہورہی ہوں ، راہیں روشن ہوں اور اندھیرے بھاگ رہے ہوں اس وقت نور سے نفرت اور ظلمت سے وہی پیار کرے گا جس کا دل شیطان کے قبضہ میں ہو پھر وہ اس گروہ میں سے نہیں ہوگا جن کے متعلق اللہ تعالیٰ نے کہا ہے کہ’’عِبَادِیْ‘‘ اور جن کے متعلق اللہ تعالیٰ نے یہ کہا ہے کہ شیطان ان پر غالب نہیں آسکتا،پس اللہ تعالیٰ اپنے ایک سچے اور مخلص اور حقیقی بندے کو جس شکل اور روپ میں دیکھنا چاہتاہے وہی شکل اور روپ اور اسی نورکی جھلک دعائوں کے ساتھ اور تدبیروں کے ساتھ مجاہدہ کے ساتھ اور قربانیوں کے ساتھ اور عاجزانہ راہوں کو اختیار کرکے اپنے رب سے طلب کریں اور پائیں خدا کرے کہ ایسا ہی ہو۔
    پھر میں کہتا ہوں کہ صدقہ اور دعا سے میر ی مدد کریں اللہ تعالیٰ جس غرض کے لئے اس سفر کے سامان پیدا کررہا ہے وہ غرض پوری ہو۔ میں نے شاید پہلے بھی بتایا تھا میرا پچھلے سال جانے کا پروگرام تھا پھر بعض وجوہات کی بناء پر چھوڑنا پڑا چنانچہ مغربی افریقہ سے ایک پرانے بوڑھے احمدی کا مجھے خط آیا کہ ساری عمر یہ حسرت رہی کہ اللہ تعالیٰ توفیق دے توحضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کی زیارت ہوجائے غالباًانہوں نے اس غرض کے لئے رقم بھی جمع کی لیکن ان کو اس کی توفیق نہ ملی پھر حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ اللہ تعالیٰ کو پیارے ہوگئے اور انہوں نے لکھا کہ میں آپ کی شکل نہیں دیکھ سکا آپ سے مل کر برکت نہیں حاصل کرسکا میں زندہ ہوں آپ کا وصال ہوچکا ہے اب آپ کی خلافت ثالثہ کے وجود میں امید بندھی تھی کہ یہ موقعہ مل جائے گا آپ سے ملاقات ہوجائے گی لیکن میں اتنا بوڑھا ہوں کہ اب میرے دل میں یہ وسوسہ رہتا ہے کہ کہیں ایسا نہ ہو جو ایک سال کا التوا ہے اس میں میں اس دنیا سے چلا جائوں اوریہ حسرت میرے دل ہی میں رہے کہ جماعت احمدیہ کے امام کی زیارت کرسکوں۔
    پس اس قسم کی تڑپ ان بھائیوں کے دل میں ہے اللہ تعالیٰ مجھے توفیق دے کہ محبت سے اور فراست اور پیار سے اور ان کی ضرورتوں کے سمجھنے اور ان کے مطابق ان کے ساتھ سلوک کرنے سے ان کی پیاس کو بجھا سکوں اور خداتعالیٰ ان کے لئے سیری کے سامان پیدا کردے۔ تاکہ وہ بشاشت کے ساتھ ہمارے کندھے سے کندھا ملائے۔اسلام کی فتح کے دن کی طرف ہر قسم کی قربانیاں کرتے ہوئے بڑھتے چلے جائیں مگراللہ تعالیٰ کے فضل اور اس کی رحمت کے بغیر کچھ ہو نہیں سکتا ہم اسی کے در کے بھکاری ہیں اور ہم اسی کے حضور جھکتے ہیں اسی پرہمارا تو ّکل ہے دنیا کا کوئی سہارا نہ ہمارے پاس ہے نہ دنیا کے کسی سہارے کی ہمیں خواہش ہے اگر وہی ایک ہمارا پیارا سہارا بن جائے تو ہمیں سب کچھ مل گیا سارے سہارے ہم نے پالئے پس اسی کے سہارے اور اسی پر تو ّکل کرتے ہوئے اس یقین کے ساتھ میں اس سفر پر جارہا ہوں کہ اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے ایسے سامان پیدا کرے گا کہ اسلام کے غلبہ کے دن جلد سے جلد آجائیں اور عاجزانہ طور پر جن صحیح اور سچی اور سیدھی راہوں کا میں متلاشی ہوں اللہ تعالیٰ ان راہوں کو میرے لئے بھی اور خدا کرے آپ کے لئے بھی منور کر دے اور کامیابی عطا کرے اور خیریت کے ساتھ آپ یہاں رہیں اور خیریت کے ساتھ ہم وہاں سے واپس آئیں اور ان لوگوں کے پیار اور ان کے اخلاص سے اپنے خزانے بھر کر واپس لوٹیں اور وہ واقعات آپ کے ایمان میں زیادتی کا باعث بنیں جس طرح کہ یہاں کی قربانیاں ان کے ازدیادِ ایمان کا باعث بنتی ہے۔تَعَاوَنُوْاعَلَی الْبِرِّوَ التَّقْویٰ(المائدہ:۳) کا ایک مفہوم ایک تفسیر یہ بھی ہے کہ اپنی زندگی اس طرح بنائو کہ دوسرا اس سے سہارا لینے لگے اگر عملی زندگی میں اس قسم کا تعاون ہوا ور ہرایک دوسرے بھائی کواللہ تعالیٰ کا حقیقی بندہ نظرآئے تو اس سے بشاشت بھی پیدا ہوتی ہے اور اس سے قربانی اور ایثار کی امنگ اور خواہش بھی پیدا ہوتی ہے اور انسان دنیوی تکالیف کو اور ان دنیوی مخالفتوں کوکوئی چیز نہیں سمجھتا ایک موج ہوتی ہے جو ٹھاٹھیں مارتی ہوئی آگے ہی آگے بڑھتی چلی جاتی ہے اور اللہ تعالیٰ انہیں اپنی رحمت کے سایہ میں رکھتا اور آخری غلبہ کے دن تک اس نسل کو جس کے لئے وہ مقدر ہوپہنچا دیتا ہے ہر نسل کے دل میں یہ خواہش ہوتی ہے وہ نسل وہی ہو ہمارے دل میں بھی یہ خواہش ہے اور ہم بھی اللہ تعالیٰ سے یہی دعا کرتے ہیں کہ اے اللہ! اگلی نسل کیوں؟ یا ا سکے بعد کی نسل کیوں؟ تو اپنے فضل سے ہماری زندگیوں میںاسی نسل کو وہ دن دکھا دے جو اسلام کے لئے عید کا دن ہوگا اور جس کا تونے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے وعدہ کیا ہے۔ اٰمین
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۹؍اپریل ۱۹۷۰ء صفحہ۳،۴)
    ززز








    احمدیت انسانوں کی بنائی ہوئی تنظیم نہیں ہے
    اس کی بنیاد خود اللہ تعالیٰ نے اپنے ہاتھ سے رکھی
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۱۷؍اپریل۱۹۷۰ء بمقام مسلم ٹیچرزٹریننگ کالج لیگوس ۔نائیجریا)
    نوٹ:-حضور ایدہ اللہ تعالیٰ نے یہ خطبہ انگریزی زبان میں ارشاد فرمایا تھا جس کا اردو ترجمہ افادئہ احباب کے لئے درج ذیل ہے۔
    ّتشہد و ّتعوذاورسورۂ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    انسانوں کی خود اپنے ہی ہاتھوں قائم کی ہوئی تنظیم کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ اس کے اراکین نے آپس میں یہ عہد کیا ہے کہ وہ مل جل کر کام کریں گے اور ایک مشترکہ مقصد کے حصول کے لئے کوشش کرتے رہیں گے لیکن اللہ تعالیٰ کی قائم کردہ جماعت اس سے بالکل مختلف ہوتی ہے اس کی حیثیت ایک کلب کی سی نہیں ہوتی یہ ایک جماعت ہوتی ہے جسے اللہ تعالیٰ خود اپنے ہاتھ سے قائم کرتا ہے اور جس پر اسکی برکتیں نازل ہوتی ہیں۔
    درحقیقت ان دونوں میں فرق کویوں بیان کیاجاسکتا ہیکہ جب لوگ باہم مل کر کوئی تنظیم قائم کرتے ہیں تووہ اس بات کے بھی مجاز ہوتے ہیں کہ اس تنظیم کو توڑڈالیں لیکن جب اللہ تعالیٰ کسی جماعت کو قائم کرتا ہے تو دنیا میں کوئی فرد یا کوئی ادارہ نہ اس بات کا حق رکھتا ہے اور نہ ہی اسے یہ قدرت حاصل ہوتی ہے کہ اس جماعت کو توڑدے۔ انسانوں کی قائم کردہ تنظیمیں ایک سے زیادہ حصوں میں بٹ سکتی ہیں اور اکثر بٹ بھی جاتی ہے اور ان میں سے ہر ایک حصہ کو اتنے ہی حقوق اور مراعات حاصل ہوتی ہیں جتنی کہ اپنی اپنی جگہ دوسرے حصوں کو، اللہ تعالیٰ کی قائم کردہ جماعت بھی متعدد حصّوں میں تقسیم ہوسکتی ہے لیکن ان میں سے جماعت کا صرف ایک حصہ اللہ تعالیٰ کی برکات کا مورد رہ سکتا ہے باقی سب ان فیوض سے محروم کر دیئے جاتے ہیں انسانوں کی قائم کردہ تنظیم زیادہ سے زیادہ اپنے اراکین کی دنیوی اور مادی ضروریات کو پورا کرسکتی ہے یہ تنظیم سکول قائم کرسکتی ہے ہسپتال جاری کرسکتی ہے لائبریریاں اور دیگر ایسے ہی ادارے قائم کرسکتی ہے لیکن اللہ تعالیٰ کی قائم کردہ جماعت اپنے اراکین کے لئے اس سے بہت کچھ زیادہ کرنے کی اہل ہوتی ہے اور یقینا ان کیلئے وہ مادی ضروریات سے بہت کچھ بڑھ کر دکھاتی ہے در حقیقت الٰہی جماعت کے قیام کی غرض یہ ہوتی ہے کہ وہ اپنے اراکین کو اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرنے میں مدد دے اور یہ ایسی بات ہے جسے انسانوں کی بنائی ہوئی تنظیم کسی صورت میں بھی سرانجام نہیں دے سکتی کیونکہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ملنے والی برکات یا ان کا وعدہ اس تنظیم کے شامل حال نہیں ہوتا برخلاف اس کے الٰہی جماعت تو شروع ہی اللہ تعالیٰ کی مدد اورنصرت اور کامیابیوں کے ہزاروں وعدوں کے ساتھ ہوتی ہے ۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام اس فرق کو واضح کرتے ہوئے فرماتے ہیں:-
    ’’بعض کہتے ہیں کہ انجمنیں قائم کرنا اور مدارس کھولنا یہی تائید دین کے لئے کافی ہے مگر وہ نہیں سمجھتے کہ دین کس چیز کا نام ہے اور اس ہماری انتہائی ہستی کی انتہائی اغراض کیا ہیں اور کیونکر اور کن راہوںسے وہ اغراض حاصل ہوسکتے ہیں۔ سو انہیں جانناکہ انتہائی غرض اس زندگی کی خدا تعالیٰ سے سچا اور یقینی پیوند حاصل کرنا ہے جو تعلقات نفسانیہ سے چھوڑا کر نجات کے سرچشمہ تک پہنچاتا ہے۔ سو اس یقین کامل کی راہیں انسانی بناوٹوں اور تدبیروں سے ہرگز نہیں کھل سکتیں...........
    جوآسمان سے اترا وہی آسمان کی طرف لے جاتا ہے۔ سو اے وے لوگو! جو ظلمت کے گڑھے میں دبے ہوئے اور شکوک وشبہات کے پنجہ میں اسیر اور نفسانی جذبات کے غلام ہو.........اپنی سچی رفاہیّت اور اپنی حقیقی بہبودی اور اپنی آخری کامیابی انہی تدبیروں میں نہ سمجھو جو حال کی انجمنوں اور مدارس کے ذریعہ سے کی جاتی ہیں اور یہ اشغال بنیادی طورپر فائدہ بخش توہیں اور ترقیات کا پہلا زینہ متصوّر ہوسکتے ہیں مگر اصل مدّعا سے بہت دور ہیں.........امیدوں کا تمام مدار و انحصار ان رسمی علوم کی تحصیل پر ہر گز نہیں ہوسکتا اور اس آسمانی نور کے اترنے کی ضرورت ہے جو شکوک وشبہات کی آلائشوں کو دور کرتا اور ہوا وہوس کی آگ کو بجھاتا اورخداتعالیٰ کی سچی محبت اور سچے عشق او رسچی اطاعت کی طرف کھینچتا ہے۔........
    اگرچہ تم اپنی دنیوی فکروں اور سوچوں میں بڑے زور سے اپنی دانش مندی اور متانت رائے کے مدعی ہو۔مگر تمہاری لیاقت تمہاری نکتہ رسی تمہاری دور اندیشی صرف دنیا کے کناروں تک ختم ہوجاتی ہے اور تم اپنی اس عقل کے ذریعہ سے اس دوسرے عالم کاایک ذرہ ساگوشہ بھی نہیں دیکھ سکتے جس کی سکونت ابدی کے لئے تمہاری روحیں پیدا کی گئی ہیں۔‘‘ (فتح اسلام۔ روحانی خزائن جلد نمبر۳ صفحہ ۴۱ تا ۴۳)
    سویہ بات اظہر من الشمس ہے کہ انسان آسمانی روشنی یعنی الٰہی نور کے بغیر نابینا اور اندھا ہے اللہ تعالیٰ نے جو رحمن اور رحیم ہے انسان کو اس لئے پیدا نہیں کیا کہ وہ انسانی خیالات کے جنگلوں میں بھٹکتا پھرے اس نے تمام زمانوں میں انبیاء کو مبعوث فرمایا تاکہ وہ حقیقی اوراصل مقصد کی طرف انسانوں کی راہنمائی کریں اس سلسلہ میں آخری راہنما حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تھے نوعِ انسان کی راہنمائی کے لئے جو احکام آپ کو عطاکئے گئے وہ قرآن مجید میں درج ہیں اور ان کا بہترین عملی نمونہ یا اُسوۂ حسنہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی اپنی حیات طیبہ ہے حضورؐ کے بعد خلفاء راشدین کا دور آیا جو کہ آپ کے سچے جانشین تھے اور جن کے وجودوں میں اللہ تعالیٰ کی نازل کردہ روشنی پوری طرح منعکس تھی۔ خلافت راشدہ کے دور ختم ہوجانے کے بعد مجدد دین انسانوں کی اس وقت تک راہنمائی کرتے رہے یہاں تک کہ حضرت میرزاغلام احمد قادیانی علیہ السلام مسیح موعود اور مہدی معہود بن کر دنیا میں تشریف لے آئے آپ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے بروز اور آپ کے عظیم روحانی فرزند تھے اور آپ کی بعثت ان متعدد پیشگوئیوں کے مطابق ہوئی جو قرآن مجید اور اس سے پہلی کتب مقدسہ میں درج ہیں اور جن کا احادیث نبوی میں بھی ذکر ہے آپ کی بعثت سے شکوک و شبہات اور بے یقینی کے سیاہ بادل چھٹ گئے اور انسان ایک دفعہ پھر اپنے خالق کے قریب آگیا۔حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی بعثت کے ذریعہ انسان نے نئی زندگی حاصل کرلی اور اس کی زندگی بامقصد ہوگئی اور اس نے جان لیا کہ اس کی زندگی کا حقیقی مقصد کیا ہے اور اسے کس طرح حاصل کیا جاسکتا ہے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے وصال سے اس روشنی نے جو اللہ تعالیٰ نے نازل کی تھی چمکنا بند نہیں کر دیا حضورکا تو وصال ہوگیا لیکن وہ روشنی اپنی جگہ پر قائم ہے اور روحوں کو باقاعدہ اور مسلسل منور کررہی ہے اور مَردوں اور عورتوں کی ان کی حقیقی منزل کی طرف راہنمائی کررہی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے انسانوں کوروشنی اور بصارت کے بغیر نہیں چھوڑدیاروشنی چمک رہی ہے اور اس کی شعاعیں حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے خلفاء کے ذریعہ اکنافِ عالم میں پہنچ رہی ہیں ان خلفاء کو چھوڑ کرنہ کہیں روشنی ہے نہ حقیقی راہنمائی۔
    درحقیقت خلیفہ کسی دنیاوی انجمن کا سربراہ نہیں ہوتا اس کا انتخاب خدا خود کرتا ہے اور وہ خدا کے ہاتھ میں ایک آلہ کی طرح ہوتا ہے اسکے ذریعہ آسمانی مقصد اورآسمانی سکیم کی دنیا میں نمائندگی ہوتی ہے یادرکھو کہ احمدیت کوئی انسانوں کی ازخود بنائی ہوئی کلب نہیں ہے یہ ایک جماعت ہے اور جماعت بھی ایسی جس کی اللہ تعالیٰ نے خود بنیاد رکھی ہے اللہ تعالیٰ ہمیشہ اس کی راہنمائی کرتا رہے گااور اللہ تعالیٰ ہی حقیقتاً تمام روشنی کا منبع ہے۔ اس جماعت کے ذریعہ اللہ تعالیٰ نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآن کریم کی عظمت اور شان کو دوبارہ قائم کرنے کا فیصلہ فرمایاہے یہی جماعت انسانیت کی امیدوں کا مرجع اور اس کے درخشندہ مستقبل کی ضامن خلافت قدرت ثانیہ ہے اور اللہ تعالیٰ کی عظمت اور اس کے جلال کی دوسری تجلی اگر چہ خلیفۃ المہدی المعہود تو نہیں ہوتا لیکن وہ المہدی المعہود کا جانشین ضرورہوتا ہے اس کا آنا اس وقت ہوتا ہے جب المسیح الموعود والمہدی المعہود کا وصال ہوجائے یہ بات تو واضح ہے کہ مہدی علیہ السلام جسمانی طور پر ہمیشہ تو اس دنیا میں نہیں رہ سکتے تھے لیکن خلافت رہ سکتی ہے اور انشاء اللہ ہمیشہ قائم رہے گی درحقیقت خلافت اسلام کی ان برکات کے تسلسل کا نام ہے جو مہدی موعود دوبارہ دنیا میں لائے تھے۔
    اب اللہ کی ٔمشیت نے یہ فیصلہ فرمایا ہے کہ جانشینی کی بھاری ذمہ داریاں میرے کمزور کندھوں پر ڈالی جائیںجن لوگوں نے میری اطاعت کا عہد کیا ہے اور اسلام کی خدمت کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ کے جلال اور جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی عزت وعظمت کے اظہار کے لئے کوشاں ہیں انہیں اس بات کو اچھی طرح سمجھ لینا چاہئے کہ کامیابی اور خدمت کرنے کی توفیق کے لئے ہم صرف اور صرف اللہ تعالیٰ ہی پر بھروسہ رکھتے ہیں اگر انسانی امداد باہم نہ پہنچائی جائے تو وہ صرف اور صرف اللہ تعالیٰ کے شکر کے طور پر ہونی چاہئے کہ اس نے محض اپنے فضل سے اپنے دین کی خدمت کرنے کی توفیق عطا فرمائی اور یہ مدد اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرتے ہوئے وصول کرنی چاہئے۔ کیونکہ اس کی مرضی کے بغیر کوئی چیز بھی نہ کسی کام آسکتی ہے اور نہ کسی حقیقی مدد کا ذریعہ بن سکتی ہے۔ میں دعا کرتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ ہم سب کو توفیق دے اورہمت عطاکرے کہ ہم ثابت قدمی سے اسی کے ہورہیں اور غیر اللہ سے ہمارا کوئی تعلق نہ ہو ہم اس کے دین کی خاطر اور اس کی رضا کی حصول کی خاطر ہمیشہ ہرقربانی کرنے کے لئے تیار رہیں اور ہر قسم کے بتوں کو،دولت کے بت، طاقت کے بت لوگوں کی خوشنودی یا ان کی ناراضی کے بت، تعداد کی کثرت کے بت اور نسلی امتیاز کے بت پاش پاش کردیں۔
    اللہ تعالیٰ ہمارے ساتھ ہواور ہماری مدد اور نصرت فرمائے خدا کرے کہ اس کی رضا اور اس کی خوشنودی بتمام وکمال ظاہرہو۔اٰمین یا ربّ العالمین۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۱۴؍مئی ۱۹۷۰ء صفحہ۳ ،۴)
    ززز







    جماعت احمدیہ غانا کو خلافت کی برکات
    سے بالمشافہ حصہ پانے کا موقع
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲۴؍اپریل ۱۹۷۰ء بمقام سالٹ پانڈ غانا)
    (خلاصہ)
    حضورانور نے خطبہ جمعہ میں جو گیارہ بج کر پچپن منٹ پر شروع ہوا اور انگریزی زبان میں تھا اور جس کا ترجمہ ساتھ ساتھ مکرم عبدالوہاب صاحب آدم کر رہے تھے فرمایا:-
    یہ دن آپ کے لئے ایک عظیم دن ہے اللہ تعالیٰ نے اس فعّال اور زندہ تحریک میں شامل ہونے کی آپ کو نہ صرف توفیق دی بلکہ آج آپ کو موقع دیا ہے کہ آپ حضرت مہدی معہود علیہ السلام کے ایک خلیفہ سے ملاقات کر سکیں۔ پہلی بار آپ میں سے اکثر کو یہ موقع ملا ہے کہ آپ مجھ سے دعائیں لیں اور خلافت کی برکات سے بالمشافہ حصہ پائیں۔ اگرچہ میں تو آپ کے لئے ہر روز دعا کرتا ہوں۔ میں سمجھتا ہوں کہ میرے لئے بھی یہ ایک عظیم دن ہے جب مَیں یہاں آیا اور میں نے تقدس کا نور آپ کی پیشانیوں پر چمکتا ہوا دیکھا تو میرے جذبات نے ایسا جوش مارا جسے بیان کرنا ممکن نہیں بڑی مشکل سے میں نے اپنے جذبات پر قابو پایا۔ میں نے سوچنا شروع کیا کہ یہ ایک تنہا اکیلی آواز تھی جو آج سے اسّی سال پہلے قادیان سے بلند ہوئی وہ آواز اپنے نفس کو بلند کرنے کے لئے نہیں اٹھائی گئی تھی۔ وہ آواز اللہ کے جلال کو ظاہر کرنے کے لئے اٹھائی گئی تھی جو بڑی طاقتوں والا ہے۔ وہ محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عزت اور مقام کو ظاہر کرنے کے لئے بلند کی گئی تھی۔ (اس پر آمین آمین کی آوازیں بلند ہوئیں) بنی نوع انسان اللہ اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو بھول چکی تھی لیکن بنی نوع انسان کو آپ کی رحمت اور مدد کی ضرورت تھی جس کے بغیر وہ اپنی غلطیوں کا خمیازہ بھگتنے سے نہیں بچ سکتی تھی۔ جب وہ آواز بلند ہوئی تو ساری دنیا اس آواز کو خاموش کرنے کے لئے کھڑی ہوگئی لیکن انسان کی متحدہ سازش اور طاقت اس آواز کو خاموش نہ کر سکی۔ اللہ کے فرشتے آسمان سے اُترے کہ اس کی حفاظت کریں اور اس کی تائید کریں اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا نام اور پیغام دنیا کے کناروں تک پہنچائیں۔ جب میں نے آپ کو اللہ تعالیٰ کی تعریف اور حمد کے ترانے گاتے دیکھا اور سنا تو میں نے یہ محسوس کیا کہ یہ وہی آواز ہے جو آپ کے مونہوں سے صدائے بازگشت کی طرح ٹکرا کر بلند ہو رہی ہے۔ آپ احمدیت کی سچائی کا زندہ ثبوت ہیں یاد رکھیں کہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی بعثت کے وقت مسلمان جاگنے کی کوشش کر رہے تھے وہ تنظیمیں اور ایسوسی ایشنیں بنا کر اپنے رنگ میں مسلمانوں کی مدد کر رہے تھے اور ان کی دنیاوی مشکلات کو حل کرنے میں کوشاں تھے لیکن آپ ہمیشہ یاد رکھیں کہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کسی نئی ایسوسی ایشن یا کلب قائم کرنے کے لئے تشریف نہیںلائے تھے۔ آپ اللہ تعالیٰ کی طرف سے اس کی اپنی جماعت کے قیام کے لئے مبعوث ہوئے تھے۔ اللہ تعالیٰ کی پوری قدرت اور طاقت آپ کی پشت پر تھی۔ پس آپ کی خوشی اور اس کا اظہار بالکل حق بجانب ہے آپ مجھ سے ملے اور مجھے دیکھا اور میری دعائیں لیں اس لئے آپ کو پورا حق ہے کہ آپ خوش ہوں جیسا کہ میں نے کہا ہے میں ہر احمدی کو احمدیت کی سچائی کاثبوت سمجھتا ہوں اور آپ کا اسلام کے مقاصد کے حصول میں شغف آپ کے اخلاص اور ایمان کا آئینہ دار ہے۔ آپ ثبوت ہیں اس بات کا کہ ہر وہ چیز صحیح اور خیر ہے جس کا اللہ تعالیٰ ارادہ فرماتا ہے اس لئے ہمیں ان ذمہ داریوں کو جاننا اور سمجھنا چاہئے جو ہمارے کندھوں پر ڈالی گئی ہیں۔ ہمارے سامنے ایک اس سے بھی شاندار مستقبل ہے اور اسی کے مطابق بہت بڑی قربانیوں کی بھی ضرورت ہے اگر ہم اپنی ذمہ داریاں صحیح معنوں میں ادا کریں تو ہم اللہ تعالیٰ کے ایسے فضلوں کے وارث ہوں گے جن کا آج ہم اندازہ بھی نہیں کر سکتے۔ اسلام اور احمدیت کی فتح کا دن بہت قریب ہے اس لئے اپنے فرائض کی ادائیگی کے لئے تیار ہو جائیں۔ اللہ تعالیٰ آپ کو کبھی اکیلا نہیں چھوڑے گا۔ اس کے فرشتے آسمان سے آپ کی مدد کے لئے اُتریں گے اور آپ ہی صرف آپ ہی ہر مذہب، ہر قسم کے فلسفے اور ہر قسم کے نظریے پر غالب آئیں گے۔ مستقبل آپ کا ہے مسکراتے ہوئے چہروں کے ساتھ آگے بڑھیں اور اس سے ملیں۔ ‘‘
    اس کے بعد حضور نے اللہ تعالیٰ سے زندہ تعلق پر سیدنا حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے ارشادات کی روشنی میں تفصیل سے واضح فرمایا کہ یقین یقین کو کاٹتا ہے۔ شکار جنگل کی طرف بلاتا ہے تو سانپ اور شیروں کا خوف اس سے دور بھگاتا ہے کہ جس طرح ایک شکاری کا جنگل میں جانا اور وہاں شکار کی بجائے سانپوں اور بھیڑیوں اور چیتوں کو پاکر واپس لوٹ آنا ایک صحتمند عمل ہے اسی طرح اگر انسان کو اللہ تعالیٰ کے غضب اور غصے کا ڈر ہو تو وہ کبھی گناہ نہ کرے وہ پوری کوشش کرے گا کہ اس کے غصے اور غضب کے جہنم سے اپنے آپ کو بچائے۔
    پھر فرمایا اس لئے اے میرے روحانی بچو! جس چیزکی ضرورت ہے وہ اللہ تعالیٰ کے جلال پر یقین ہے۔ ایسا یقین جس سے جسم کانپ جائے اور اللہ تعالیٰ کے قرب اور رضا ہی میں نجات نظر آئے۔ پس قرب کی راہوں کی تلاش ضروری ہے اس لئے میں مہدی اور مسیح علیہ السلام کے جانشین کے طور پر آپ کو جو یہاں موجود ہیں یا دنیا میںکہیں اور موجود ہیں ان سب کے نوٹس میں یہ حقیقت لانا چاہتا ہوں کہ جو کتاب ان ساری ضرورتوں کو پورا کرتی ہے وہ صرف قرآن مجید ہے۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۲۳ ؍مئی ۱۹۷۰ء صفحہ۴،۵)
    ززز







    حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی بعثت کا مقصد
    اللہ تعالیٰ کی صفات کے عرفان کاحصول ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۸؍مئی ۱۹۷۰ء بمقام سیرالیون)
    (خلاصہ)
    ’’حضور کا خطبہ ایک بجکر ۳۷ منٹ پر شروع ہوا۔ خطبے کا ترجمہ امام عبداللہ نے کری اول (Creol) یعنی Broken English اور الحاج بونگے نے ٹمنی زبان میں کیا۔ کری اول زبان امریکہ اوربرازیل سے واپس آنے والے ان آزاد غلاموں کے ذریعہ آئی ہے جو غلامی کے خاتمے پر افریقہ کے مختلف ممالک میں واپس آکر آباد ہوئے ان لوگوں کی اکثریت عیسائی ہے اور یہ لوگ افریقہ کے مختلف ممالک میں پائے جاتے ہیں۔ ٹمنی یہاں کامشہورمقامی قبیلہ ہے جس کی اکثریت مسلمان ہے۔ حضور کے انگریزی زبان میں ارشاد فرمودہ خطبے کا ملخص درج کرتا ہوں۔‘‘ چوھدری محمد علی ایم اے۔ حضور نے فرمایا:-
    میرے عزیز بھائیو اور بہنو!
    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    میں آپ سے مل کر بہت خوش ہوا ہوں میں خوش ہوں کیونکہ میں آپ میں سے ہر ایک کو اللہ تعالیٰ کی رحمت کا نشان سمجھتا ہوں آپ اس پیشگوئی کو پورا کرنے والے ہیں جس میں اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام سے فرمایا۔
    I SHALL GIVE YOU A LARGE PARTY OF ISLAM
    میں تجھے مسلمانوں کا بہت بڑا گروہ عطا کروں گا آپ کو یہ حقیقت اچھی طرح ذہن نشین کر لینی چاہئے کہ جماعت احمدیہ کوئی کلب نہیں ہے ایک کلب یا ایسوسی ایشن اور ایک الٰہی جماعت میں بہت فرق ہوتا ہے کسی کلب یا ایسوسی ایشن کی بنیاد باہمی خیرسگالی اور افہام و تفہیم پر ہوتی ہے اس کے برعکس اللہ تعالیٰ کی قائم کردہ جماعت اللہ تعالیٰ سے طاقت حاصل کرتی ہے ہمارے قادر و توانا خدا نے یہ جماعت ایک خاص مقصد کے لئے قائم فرمائی ہے اور سیدنا حضرت مہدی علیہ السلام کو ایک خاص مقصد کے لئے مبعوث فرمایا ہے وہ مقصد یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ پر ایمان مضبوط ہو جائے اور اللہ تعالیٰ کی صفات کا عرفان حاصل ہو یہ عرفانِ الٰہی ہی ہے جس سے انسان کا ایمان بڑھتا ہے اور یقین مستحکم ہوتا ہے وہ جان لیتا ہے کہ اس کی فلاحِ دارین اللہ تعالیٰ کی ذات سے وابستہ ہے اس کی تمام اُمیدیں اسی کی رضا پر مرکوز ہو جاتی ہیں۔ ایسا صاحبِ عرفان و یقین انسان خود اعتمادی اور وثوق کے ساتھ اپنے مقصد کی جانب بڑھتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کی رحمتوں اور برکتوں کے روشن نشانات اس کے سامنے موجود ہوتے ہیں اس کا ارادہ مضبوط اور عزم راسخ ہوتا ہے اور اللہ تعالیٰ کی محبت اور الٰہی انعامات کا ذاتی تجربہ حاصل کرتا ہے جس سے اس کا اللہ تعالیٰ کی ہستی پر یقین اور بھی قوی ہو جاتا ہے اس کا اپنا ارادہ ختم ہو جاتا ہے اور اللہ تعالیٰ کے جلال کا تسلّط اس پر قائم ہو جاتاہے اس کی معرفتِ الٰہی اپنے عروج پر پہنچ جاتی ہے اور اللہ تعالیٰ اس کے دل میں داخل ہو جاتا ہے اور اس کے دل کو تنہا چھوڑنے سے انکار کر دیتا ہے اس کی پاک روح اس کے اندر رہائش پزیر ہوجاتی ہے اور اسے حرکت اور طاقت بخشتی ہے یہ روح اس کے ہر کام میں اس کی رہنمائی کرتی ہے۔ اللہ تعالیٰ خود اس کا نگران اور محافظ بن جاتا ہے اور وہ جبروت و عظمت والے خدا کے جلال کے تصرف میں آجاتا ہے اور ایمان و عرفان کا پانی اس کے دل سے اس طرح بہہ نکلتا ہے جس طرح میٹھے چشمے سے پانی۔ وہ اس تجربے میں لذت پاتا ہے اور یہ لذت اس پر حاوی ہو جاتی ہے اور ا سکی آنکھوں اور چہرے سے نظر آنے لگ جاتی ہے اللہ تعالیٰ کا نور اس پر بارش کی طرح برستا ہے اور اس کی روح اللہ تعالیٰ کے حسن و جمال کا لباس پہن لیتی ہے۔ اور اس کے وجود میں نئی زندگی کے آثار کچھ اس طرح نمودار ہو جاتے ہیں جس طرح درختوں کی شاخیں موسمِ بہار کے آنے پر پتوں اور پھولوں سے لد جاتی ہیں اور حسن و جمال کا مرقع بن جاتی ہیں۔
    اس کے بعد حضور نے مساجد کے فلسفہ و حکمت پر روشنی ڈالی اور تفصیل سے اس حقیقت کو واضح فرمایا کہ مسجد کا مالک اللہ تعالیٰ خود ہے یہ خدائے واحد کا گھر ہے جو شخص خدائے واحد کی عبادت کرنا چاہے وہ مسلمان ہو یا نہ ہو اسے حق حاصل ہے کہ وہ اپنے طریق پر فریضۂ عبادت ادا کر سکے اس لحاظ سے مسجد تمام عبادت گاہوں، گرجوں اور صومعوں کی پناہ گاہ اور محافظ بن جاتی ہے۔ مسجد اعلان ہے اس امر کا کہ تمام عبادت گاہیں جو خدائے واحد کی طرف منسوب ہوتی ہیں اسی کے لئے ہیں اور وہی ان کی حفاظت کا ضامن ہے۔
    اس کے بعد حضور نے سیدنا حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے کلام سے تفصیل سے استدلال فرمایا اور فرمایا کہ حضرت مہدی علیہ السلام ہمیں نور دینے کے لئے آئے تھے۔ تاکہ ہم سچے ایمان کا نور اپنی ذات میں مشاہدہ کر سکیں آپ کا یہ فرضِ اوّلین ہے اور آپ کی یہ کوشش ہونی چاہئے کہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے نیکی اور سچائی کی توفیق آپ کو حاصل ہو اور ایسی حسین روح آپ کو دی جائے جو اس دنیامیں بھی اورآخرت میں بھی اللہ تعالیٰ کو محبوب ہو دنیا آج اپنے خالق کو بھول چکی ہے اور مکمل تباہی کے کنارے پر کھڑی ہے دعا کریں کہ اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے دنیا کو اپنا نور اور محبت اور عرفان بخشے اور اسے اس خوفناک انجام سے بچا لے۔
    اس کے بعد حضور نے بلند آواز سے لمبی دعا فرمائی اور فرمایا کہ میں دعا کرتا ہوں اور آپ اس میں خاموشی سے شامل ہوں۔ اور اپنے دل میں اٰمین کہتے جائیں۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۳۱؍ مئی ۱۹۷۰ء صفحہ۳)
    ززز







    میں اسلام کا محبت واخوت اور مساوات کا
    پیغام لے کر مغربی افریقہ روانہ ہوا
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۱۲؍جون۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    گزشتہ ۴؍ اپریل کومیں اللہ تعالیٰ کی توفیق سے اسلام کا محبت اور پیار، اخوت اور مساوات کا پیغام لے کرمغربی افریقہ کے ممالک کے دورہ پر روانہ ہواتھا اور چند ہفتوں کے بعد اللہ تعالیٰ کے فضل کا منادی بن کر آپ میں پھر واپس آیا ہوں میں نے وہا ں جو کچھ دیکھا، محسوس کیا اور مشاہدہ کیا الفاظ میں اس کا بیان ممکن نہیں کچھ جھلکیاں ہیں جو دکھا دی گئیں کچھ جھلکیاں ہیں جو دکھائوں گا وہ حالات دیکھنے اورمحسوس کرنے سے تعلق رکھتے تھے بیان کرنا قریباً ناممکن ہے۔
    میں نے ان سب اقوام کو جن میںمَیں نے دورہ کیانیز ان کے ذریعہ افریقہ کی دوسری اقوام کو اسلام نے پیار کا جو پیغام بنی نوع انسان کو دیا ہے وہ سنا یا محبت واخوت، ہمدردی وغم خواری کی ان سے باتیں کیں اور مساوات کی آواز کو ان کے درمیان بلند کیا صرف زبان سے ہی نہیں بلکہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اسوہ پر عمل کرنے کی کوشش کرتے ہوئے خودعمل سے انہیں بتایاکہ ہم میں اور آپ میںکسی انسان اور دوسرے انسان میں بحیثیت بشر کوئی فرق نہیں ہے ہزاروں بچوں کو پیار کیا ہزاروں بڑوں سے معانقہ کیا اور پتہ نہیں کتنوں سے مصافحے کئے،وقت پر بھی کئے اور بے وقت بھی کئے ایسے وقت میں بھی کئے جب احساس یہ تھا کہ اس وقت یہاں گرمی میں زیادہ ٹھہرنا ٹھیک نہ ہو اور مَیں بیہوش ہوجائوں لیکن جومَیں انہیں بتانا چاہتا تھا قول اور فعل سے، وہ مَیں نے اپنی طرف سے پوری کوشش کی تھی کہ بتادوں۔ اَکرا (گھانا) میں پہلی بار ہماری بڑی مسجد کی بنیاد رکھی جانی تھی۔ بنیاد کے رکھے جانے کے موقع پر ہزاروں آدمیوں کے سامنے میں نے اسلام کی یہ تعلیم پیش کی ان میں اکثریت تو احمدیوں کی تھی لیکن میری آواز ریڈیو اور اخبار کے ذریعہ قریباً ہرفرد تک پہنچ جاتی تھی کیونکہ اخباروں نے بہت تعاون کیا اور ریڈیو اور ٹیلیویژن نے بھی بہت تعاون کیا۔
    مسجد کے متعلق میں نے انہیں بتایا کہ اسلامی تعلیم کے مطابق اللہ کی مسجد کے دروازے جس کے ہم نگران ہیں ہر اس شخص کے لئے کھلے ہیں جوخدائے واحد ویگانہ کی پرستش کرنا چاہے خواہ وہ مسلمان ہو یا نہ ہو اور قرآن کریم نے ساری دنیا میں یہ اعلان کیا ہوا ہے کہ مسجد علامت اور نشان ہے اس بات کا کہ دوسرے مذاہب کی عبادت گاہوںکی حفاظت کی جائے گی اور انہیں مسمار نہیں کیا جائے گا۔ مسلمانوں نے اس پر عمل کیا اور دنیا میں ایک نہایت حسین مثال قائم کی۔
    ضمناً میں یہ بتا دوں کہ سپین میں ہمارا ڈرائیور انگلستان کا رہنے والا تھا اور وہ کیتھو لک نہیں تھاچنانچہ ایک موقع پر اس نے یہ کہا کہ ان کیتھولکس نے سپین کی سب مساجد مسمار کردیں جو دو۲ ایک نمونہ کے طور پر رکھیں وہ آثار قدیمہ کے طور پر ہیں مسجد کے طور پر نہیںاس نے حیران ہوکر پوچھا کہ کیا آپ کے ملک میں کیتھولک چرچ ہیں؟ جب اس کو بتایا گیا تو وہ کہنے لگا کیا یہ بھی ہوسکتاہے کہ آپ نے ان کیتھولکس کو اجازت دی ہوکہ وہ آپ کے ملک میں اور دوسرے اسلامی ممالک میں چرچ بنائیں اور وہاں وہ اپنی عبادت کریں؟ ہم نے اسے سمجھایا کہ اسلام مذہبی آزادی کی تعلیم دیتا ہے اور بنی نوع انسان کے درمیان ایک نہایت حسین معاشرہ قائم کرنا ہے۔ اللہ تعالیٰ کا حکم ہے کہ مسجد کی حفاظت کی جائے اور مسجد کے طفیل اور مسجد کو علامت اور نشان بنا کر دوسری تمام عبادت گاہوں کی حفاظت کی جائے گی۔ مسجدیں محض خود آباد ہی نہیں ہوںگی بلکہ غیروں کی عبادت گاہوں کی حفاظت کا موجب بھی ہوںگی۔ان میں صرف اللہ کا ذکر ہی نہیں کیا جائے گا بلکہ یہ امید رکھی جائے گی کہ جو لوگ مسلمان نہیں لیکن وہ کہتے ہیں کہ ہم اللہ پر ایمان لاتے ہیں وہ بھی اپنی عبادت گاہوں کو آباد رکھیں۔
    مساوات کا جو نمونہ ہمیں حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں نظر آتا ہے اس کی ایک ہی مثال مَیں وہاں مختلف موقعوں پر دیتا رہا ہوںاور وہ فتح مکہ کے دن کا واقع تھا میں نے انہیں بتایا کہ تمہارے میں سے ایک حبشی غلام، مکہ کے جو پیرا مائونٹ چیف تھے ان کا غلام تھا اور وہ اس کو نفرت اور حقارت کی نگاہ سے دیکھا کرتے تھے پھر اللہ تعالیٰ نے اس پر رحم کیا اور اس کو اسلام کے نور کی شناخت میسر آئی اور وہ مسلمان ہوگیا۔پہلے نفرت اور حقارت تھی اب نفرت اور حقارت کے ساتھ ظلم اور تشدد بھی شروع ہوگیا ان لوگوں نے اس پر انتہائی ظلم کیا کہ آج بھی اس کی یاد میں ہمارے رونگٹے کھڑے ہوجاتے ہیں۔ایک مسلمان نے اسے خریدا اور آزاد کردیا پھر وہ مسلمان معاشرہ کا ایک محترم اور معزز فرد بن گیا۔
    فتح مکہ کے روز حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک جھنڈا تیار کیا اور آپ نے اس جھنڈے کا نام بلالؓ کا جھنڈا رکھا اور اس کو ایک مقام پر گاڑ دیا اور سردارانِ مکہ سے کہا کہ اگر تم امان چاہتے ہوتو اس شخص کے جھنڈے تلے جمع ہو جائو جس کو تم نفرت اور حقارت کی نظر سے دیکھا کرتے تھے اور جس پر تم بے انتہا ظلم کیا کرتے تھے۔اس طرح پر اس مظلوم بلالؓ کا انتقام لیا ایک حسین انتقام جسے مَیں انگریزی میںSweet revenge(سویٹ ریوینج)کہہ دیا کرتا تھا۔ یہ میری اپنی اصطلاح ہے لیکن مجھے پسند ہے اب بھی میں دہرا دیتا ہوں یہ حسین اور پیارا اور میٹھا انتقام کہ ہم تمہیں ہلاک نہیں کرنا چاہتے لیکن بدلہ ضرور لیں گے۔ بلالؓ کے جھنڈے تلے آجائو تاکہ اس بلالؓ کی وجہ سے جس پر ظلم کرکے تم انسان انسان میں فرق کرنا چاہتے تھے اس بلالؓ کو ہم مثال بنا دیں فرد اورفرد، انسان اور انسان کی تفریق کو دور کرنے کی۔
    جس وقت میں نے یہ واقعہ پہلی دفعہ سنایا تو اتنی خوشی کی لہراس مجمع میں پھیل گئی کہ میرے کانوں نے وہ بھنبھناہٹ سنی جو خوشی کی وجہ سے فضا میں پیداہوئی تھی لوگوں نے بڑے جوش کے ساتھ والہانہ طریق پر اپنی خوشی کا اظہار کیا ان میں غیر بھی تھے، پادری بھی تھے۔ ایک موقع پر علاقے کے کیتھولک مشن کے سب سے بڑے پادری بھی موجود تھے(اللہ تعالیٰ نے وہاں جماعت احمدیہ کو اتنا رعب دیا ہے کہ پادریوں کو ہمارے جلسوں میں آنا پڑتا ہے وہ پیچھے رہ ہی نہیں سکتے)لیکن کوئی توجہ نہیں تھی وہ بے تعلقی کے ساتھ بیٹھے ہوئے تھے میں نے اپنے افریقن بھائیوں سے کہا کہ وہ سب نبیوں کا سردار تھا اور تمام بنی نوع انسان کا فخر اور سب سے اعلیٰ اور ارفع تھا محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم۔ جب اس نے قرآن کریم میں یہ اعلان کیا اِنَّمَآ اَنَا بَشَرٌ مِّثْلُکُمْ (الکھف:۱۱۱) کہ انسان ہونے کی حیثیت میں مجھ میں اور تم میں کوئی فرق نہیںمیں تمہارے جیسا انسان اور تم میرے جیسے انسان۔پس وہ جو اس کے ماتحت تھے اور اس سے کم درجہ رکھتے تھے Those who were junior to him like moses and christ جیسے حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام ان کو اور ان کے پیرئوں کو یہ حق نہیں پہنچتا کہ تم پر برتری کا اعلان کریں وہ پادری جو پہلے بے تعلقی سے بیٹھا ہوا تھا اچھل کر بیٹھ گیا اور اس نے کہا کہ ہمارے اوپر یہ کیا بم گرا دیا ہے۔یہ ایک حقیقت ہے کہ جب حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے دنیا کو مخاطب کرکے یہ فرمایا کہ اِنَّمَآ اَناَ بَشَرٌ مِّثْلُکُمْ (الکھف:۱۱۱) اور جب ہم اس میٹھی آواز کو خود اپنے کانوں سے سنتے ہیں تو فرشتے ہمیں آکر کہتے ہیں دیکھو تمہارا محبوب اور پیارا بنی نوع انسان کا کس قدرخیر خواہ اور مساوات کو کس رنگ میں قائم کرنے والاتھا کہ اس نے فرمایا’’اِنَّمَآ اَناَ بَشَرٌ مِّثْلُکُمْ ‘‘۔پس اس کے بعدحضرت موسیٰ ہویا حضرت عیسیٰ علیہماالسلام ان کو یا ان کے ماننے والوں کو یہ حق نہیں پہنچتا کہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے اس اعلان کے بعد بھی وہ یہ کہیں کہ حضرت موسیٰ یا حضرت عیسیٰ علیہما السلام دوسرے انسانوں سے بحیثیت انسان ارفع اور اعلیٰ تھے۔
    میں انہیں ہمدردی وغم خواری اور پیار ومحبت کی بہت سی مثالیں دیتا تھا جماعت احمدیہ کا عمل ان کے سامنے پیش کرتا تھا۔ اپنی پچاس سالہ تاریخ ان کے روبرو دہراتا تھااور میں انہیں بتاتا تھا کہ یہ تو درست ہے کہ آج سے چندصدیاں قبل مسیحیت تمہارے ملک میں یہی نعرے لگاتے داخل ہوئی تھی کہ ہم پیار کا، Love(لَو) کا پیغام لے کرآرہے ہیں لیکن محبت کے اس پیغام کے جھنڈے ان توپوں پر گاڑے گئے تھے جو یورپ کی مختلف اقوام کی فوجوں کے پاس تھیں اور ان توپوں کے مونہوں سے گولے برسے پھول نہیں برسے اور وہ محبت کا پیغام کامیاب نہیں ہوا نہ اسے ہونا چاہئے تھا نہ وہ ہو سکتا تھاکیونکہ اس سے بہتر، اس سے زیادہ پیارا پیغام حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعہ دنیا کی طرف نازل ہوچکا تھا۔ اب ہم تمہارے پاس محبت کا پیغام لے کر آئے ہیں اور قریباً پچاس سال سے مختلف ملکوں میں تمہاری خدمت کررہے ہیں اور تم میں سے ہر شخص بڑا بھی اور چھوٹا بھی، حاکم بھی اور محکوم بھی رعایا بھی اور ان کے افسر بھی جانتے ہیں کہ اس پچاس سالہ تاریخ میںنہ ہم نے تمہاری سیاست میں کبھی دلچسپی لی اور نہ اس سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کی، نہ تمہارے مالوں کی طرف ہم نے حرص کی نگاہ اٹھائی تم جانتے ہو ہم نے جو کچھ کمایا وہ تمہارے ملکوں ہی میں لگا دیا اور تم نے جو کچھ نہیں کمایابلکہ کسی اور نے کسی اور ملک میں کمایا وہ بھی یہاں لائے اور اسے بھی تمہاری خدمت پر لگا دیا اس کا اس قوم پر اثر ہوتا تھا۔ مثالیں تو بہت ہیں صرف ایک مثال میں دہراتا ہوں۔کانوؔمیں ہمارا میڈیکل سنٹر ہے جو چند سال سے وہاں کام کررہا ہے وہاں اللہ تعالیٰ کے فضل سے تمام اخراجات نکالنے کے بعد۱۵؍ہزار پائونڈ سے زیادہ یعنی ۳لاکھ سے زیادہ کی رقم بچی ہوئی تھی چنانچہ گزشتہ دوایک سال میں یہ ساری کی ساری رقم اس ہسپتال (یعنی جو پہلے کلینک تھا) کی عمارت پر لگا دی گئی بلکہ کچھ قرض لے کر لگا دیا گیا کہ جو اس سے آمد ہوگی اس میںسے ایک دو سال کے اندر واپس کردیا جائے گا، انشاء اللہ شاید ۲۰یا۲۵، ہزار پائونڈ کی رقم لگا کر ایک خوبصورت ہسپتال بنا دیا گیا۔ غرض ان ممالک میں سے ایک دھیلا نہیں نکالا وہ جو ہم سے پہلے محبت کا پیغام لے کر ان ممالک میں گئے تھے انہوں نے وہاں کچھ چھوڑا ہی نہیں۔پہلا ملک نائیجیریا تھا جہاں میں داخل ہوا۔ ایک روزمیں سوچ میں تھا ان کے حالات پر غور کررہا تھا میں نے ایک افریقن دوست سے کہا کہ یہ دیکھ کر مجھے بڑی تکلیف ہوتی ہے کہ تمہارے پاس سب کچھ تھا لیکن تمہیں ہر چیز سے ہی محروم کردیا گیا چنانچہ اس سے اگلے روز جب میں ان کے ہیڈ آف دی سٹیٹ سے ملا تو ان سے میں نے کہا کہ کل میں نے ایک دوست سے کہا تھا کہ صدیوں کی حکومت کے بعد ایک فقیر اور دیوالیہ ملک چھوڑ کر یہ اقوام پیچھے ہٹ گئیں اور ان کا سب کچھ وہاں سے لے گئیں لیکن جماعت احمدیہ اپنے پیسوں پر،اپنے پیسے لے کر وہاں پہنچی اور کام شروع کیا اور وہاں جو کمایا وہیں ان کی بہبودی کے لئے لگا دیا۔محبت کا یہ عملی پیغام دلوں پر اثر کئے بغیر نہیں رہا۔ ان کے دل احمدی مسلمان ہوں یا عیسائی یا بد مذہب ہوں احمدیت کے روپ میں اسلام کے حسن کو دیکھ کر اس کے گرویدہ ہیں اور وہ احمدیت سے پیار کرتے ہیں بد مذہب والے بھی اور لامذہب دہریہ یا پرانے مذاہب کے نشانات وآثار رکھنے والے بھی احمدیت سے پیار کرتے ہیںاور اس چیز کا میں نے اپنی آنکھوں سے مشاہدہ کیا ہے۔
    میں نے نائیجیریا میں ہی ایک روز دیکھا کہ پچاس ہزار سے زیادہ لوگ (جن میں غیر مسلموں کی اکثریت تھی) مجھے دیکھ کر خوشی سے ناچنے لگے وہ مجھے دیکھتے اور خوشی سے ناچنے لگ جاتے تھے کئی کئی میل تک دور دور سے آئے ہوئے دوست مردوزن قطار اندر قطارکھڑے تھے۔ ایک ایک احمدی قطار میں تھا اور اس کے پیچھے چھ چھ سات سات غیر مسلم ہوتے تھے۔ غیر احمدی بھی تھے غیر مسلم بھی تھے۔ غیر مسلم تو میں صرف ان کے ناچ کی وجہ سے پہنچانتا ہوں کیونکہ خوشی کے اظہار کے لئے ان کا یہ طریق ہے۔ وہ مردوزن ایک چیخ مارتے تھے اور پھر ناچنا شروع کردیتے تھے جس سے میں سمجھ لیتا تھا کہ یہ یا عیسائی ہیں یا بد مذہب ہیں۔
    کس چیز نے انہیں اس بات پر مجبور کیا تھا کہ وہ ایک غیر معروف اورانجانے انسان کو دیکھیں اور خوشی سے ناچنا شروع کر دیں ان کے دلوں میں جو احمدیت کے حسن سلوک اور احمدیت میں حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا جو حسین چہرہ انہوں نے دیکھا اگر میں یہ کہوں تو غلط نہیں ہوگا کہ احمدیت کے فریم میں انہوں نے حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا عکس دیکھا اور اس پر فریفتہ تھے اس لئے احمدیت کا جو نمائندہ تھا اسے دیکھ کر وہ خوش ہوجاتے تھے ( یہ میں غیروں کی بات کر رہاہوں ابھی اپنوں کی بات میں نہیں کررہا) اور میں نے لاکھوں آدمی ایسے دیکھے۔
    جب میںنے گوونؔکوکہا کہ میں بڑا خوش ہوں تمہارے ملک میںہر شخص ہنستا اور مطمئن نظر آتا ہے۔ میں نے خود پچاس ہزار سے لاکھ تک مسکراہٹیں ایک دن میں وصول کیں جب بھی میں نے کسی کی طرف مسکرا کر دیکھا اس نے بھی میری طرف مسکرا کر دیکھا اور خوش ہوا ایک دن میں پچاس ہزار سے لاکھ تک مسکراہٹیں وصول کرنا معمولی بات نہیں ہے مسکرا مسکرا کر میرے تو جبڑے بھی تھک جاتے تھے لیکن یہ ان کا حق تھااور میں ان کا یہ حق دیتا تھا چنانچہ گوون بڑا خوش ہوا وہ خود بڑا پکا عیسائی ہے( میں اس خطبہ میں صرف اصولی باتیں بیان کررہاہوں تفصیل میں نہیں جارہا سوائے اس کے کہ کسی تفصیل کو اصول کے بیان کرنے کے لئے بتائوں)بہرحال وہ عیسائی ہونے کے باوجودجماعت کا گرویدہ بھی ہے یعنی مذہب کا نور تو اس پر نہیں چمکا لیکن پیارکا جو پیغام تھا اس سے وہ متاثر ہوئے بغیر رہ ہی نہیں سکتامیں جب اس سے ملنے کے لئے گیا تو یہ ۳۵ سالہ نوجوان(اس عمر میں ویسے ہی انسان کا سر پُر غرور ہوتا ہے) جس نے سِول وار (خانہ جنگی) ابھی ابھی جیتی تھی اور اس ملاقات سے کچھ عر صہ پہلے بیافرانے Surrender (سرنڈر) کیا تھا۔ وہ Civel War(خانہ جنگی)جیتی تھی جس میں غیر ممالک اور غیر ملکی مشنریز نے اس کے خلاف کام کیا تھا اور اس نے ان کے تمام منصوبے خاک میں ملادیئے تھے اس حالت میں میں اس سے ملا۔ وہاں کی کیفیت یہ تھی کہ میری ملاقات سے کم وبیش تین ہفتے پہلے سارے ویسٹ افریقہ کا آرچ بشپ اسے ملنے آیا اس نے اسے ٹھیک طرح منہ نہیں لگایا اور اسے دعا تک کے لئے نہیں کہا حالانکہ وہ بھی عیسائی اور ان کا سردار۔ بلکہ اس آرچ بشپ نے اپنی خِفّت مٹانے کے لئے خود ہی چلتے ہوئے کہا اچھا اب میں آپ کے لئے دعا کر دیتاہوں لیکن جس وقت میں اس سے ملنے کے لئے گیا تو جماعت کی اتنی قدر Appreciation(اپری سی ایشن) اس کے دل میں تھی کہ بیٹھتے ہی اس نے کہا ہمارے لئے دعا کریں۔ میں سمجھا نہیں بات میں نے کہا یہ عیسائی ہے اس نے دیکھا کہ ایک مذہبی لیڈر آیا ہے اس لئے اس نے رسماً کہہ دیا کہ ہمارے لئے دعاکریںمیں نے جواباً کہا میں تو دعا کرتا ہوں اور میں آپ کے لئے بھی دعا کروں گا لیکن جب میں نے نظر اٹھا کر اس کے چہرے کے آثار دیکھے تو میں نے سمجھا کہ میں اس کی بات نہیں سمجھ سکا میں نے پھر اس سے پوچھا کہ کیا آپ کا مطلب یہ ہے کہ میں اسی وقت فارمل طریقے پر ہاتھ اٹھاکر دعاکروںکہنے لگا ہاں میرا یہی مطلب ہے چنانچہ میں نے دعا کے لئے ہاتھ اٹھائے اور وہ بھی اپنے رنگ میںاس میں شامل ہوا۔ غالباً تصویر بھی چھپ گئی ہے(دعا کریں کہ جو ہاتھ یوں بندھے ہوئے نظر آتے ہیں کسی دن یوں کھل جائیں یہ اللہ تعالیٰ کی قدرت میں ہے) وہ دل کا بڑا اچھا ہے پھر اس نے مسلمان مذہبی امام سے کھل کر یہ بات بھی کی کہ ان غیر ممالک نے اور غیر ممالک کے مشنریز نے اپنی طرف سے پوری کوشش کی کہ ہمارے ملک کو تباہ کردیں اللہ تعالیٰ کا فضل ہے کہ اس نے ہمیں ان کے برے منصوبوں سے محفوظ رکھا اور ہمارے ملک میں وہ تباہی نہیں آئی جو یہ چاہتے تھے کہ یہاں تباہی برپا ہوجماعت کی تعریف کے علاوہ اس نے مجھے یہ کہا کہ ہم بڑے خوش قسمت ہیں کہ تمام مذاہب کے لوگ یہاں بھائی بھائی کی طرح رہتے ہیںمیںنے دل میں سوچا کہ یہ ہمارے ممالک سے اچھے ہیں انہیں یہ علم حاصل ہوچکا ہے اور یہ اس حقیقت کی شناخت حاصل کرچکے ہیں کہ مذہب کا تعلق دل سے ہے طاقت کے زور سے زبان سے تو کچھ کہلوایا جا سکتا ہے لیکن دل نہیں بدلے جا سکتے۔ ساری دنیا کے ہائیڈروجن بم مل کر بھی کسی ایک آدمی کے دل میں کوئی خوشگوار تبدیلی نہیں پیدا کرسکتے یہ ناممکن بات ہے البتہ یہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا جلوہ ہے جس نے اربوں ارب انسانوں کے دلوں میں تبدیلی پیدا کردی۔ اللہ تعالیٰ نے کوثر کا جو وعدہ دیا تھا وہ پو را کیا اس وقت بھی اور پھر اس وقت سے لے کر اب تک اور پھر قیامت تک ایسے لاکھوں کروڑوں اربوں انسان پیدا ہوتے رہیں گے جو اس مذہبی حسن کے گرویدہ ہوکر حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر درود بھیجنے والے ہوں گے پس ان قوموں کی زندگی کی یہ حقیقت معلوم ہوچکی ہے اور اس لحاظ سے و ہ بڑے خوش قسمت ہیں اور سچ کہا تھا گوون نے کہ ان کی بڑی خوش قسمتی ہے کہ ان کے ملک میں تمام مذاہب ،تمام فرقے امن سے رہ رہے ہیں کوئی کسی کے خلاف زبان درازی نہیں کرتا الاّماشاء اللّٰہ شاید کوئی استثناء ہو جسے وہ قوم بہر حال پسند نہیں کرتی۔
    ایک اور مثال دے دیتا ہوں گھانا میں اَکرا کے مقام پر ہمارا ایک سکول ہے اور پھر ۱۷۰ میل کے فاصلے پر کماسی میں ہمارا ایک سکول ہے۔
    کماسی سے ستّر میل پر ٹیچی مان ایک جگہ ہے جہاں ہمارے افریقن بھائی عبدالوہاب بن آدم صاحب بطور مبلغ رہتے ہیں وہ بڑا ہی اچھا کام کررہے ہیں وہ بھی اور ان کی بیوی بھی۔ بچوں میں قرآن کریم اور مذہبی تعلیم، احمدیت اورحضرت مسیح موعودعلیہ الصلوٰۃ والسلام کا عشق پیدا کردیا ہے ان بچوں کو جب آپ دیکھیں تو آپ کے بچوں کورشک آجائے اور آپ کو بھی حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی یاد میں وہ ایسے قصیدے پڑھتے ہیں کہ انسان کے لئے اپنے جذبات پر قابو پانا مشکل ہوجاتا ہے اور نڈر ہوکر لائوڈسپیکر لگا کر لاکھوں کی آبادی کے شہروں میں گاتے پھرتے ہیں کہ جس مسیح کی انتظار تھی وہ آگیا مثلاًہم جب ابادان گئے یہ شہر قریباً لیگوس کے برابر ہے پہلے بڑا تھا اب کم ہے اس میں اکثریت مسلمانوں کی ہے۔ انہوں نے سارے شہر میں یہ منادی کی کہ جس مہدی کی انتظار تھی وہ آگیااور اس کا نائب اور تیسرا خلیفہ تمہارے اندر موجود ہے اس سے برکتیں حاصل کرو انہوں نے نڈر ہوکر سارے شہر میں اونچی منادی کی پھر بچے یہی گاتے ہیں کہ مہدی آگیا انسان اپنے جذبات پر قابو نہیں پاسکتا۔
    پس انہوں نے اس بنیادی حقیقت کو جان لیا ہے کہ مذہب کا معاملہ دل سے ہے طاقت اور زور کے ساتھ دل نہیں بدلا جاسکتا اور چونکہ وہ اس کو شناخت کر چکے ہیں اس لئے ہمیں بڑی امید ہے کیونکہ ہمارے پاس پیغام ہی پیار کا ہے اخوت کا ہے اور ہمدردی کا ہے اور غم خواری کا ہے اور مساوات انسانی کا ہے۔ میں نے عیسائیوں میں سے کسی سے بات نہیں کی جس نے آگے سے یہ نہ کہا ہو کہ جو آپ کہتے ہیں وہ ٹھیک ہے۔
    میں نے لائبیریا میں ایک بارہ تیرہ سال کے بچے سے پوچھا تمہارا نام کیا ہے اس نے غالباً جانسن کہا میں نے کہا نہیں اس وقت کے بعد تمہارا نام جمیل ناصر ہے اورتم مسلمان ہو وہ کہنے لگا Yes Sir۔وہ بچہ ہمارے امین اللہ خاں سالک کے ہاں کام کرتا تھا انہوں نے اگلے روز بتایا کہ اس نے گھر جا کر کہا کہ میرا نام اب جانسن نہیں میرا نام اب جمیل ناصر ہے اورمیں مسلمان ہوںان کے دل ہم نے جیت لئے ہیں لیکن ان کے مونہوں سے کہلوانا ہمارا کام ہے ہم بہتوں تک پہنچے ہی نہیں ایک جگہ ایرو ڈروم پر ایک دکان دار لڑکی سے ہمیں پتہ لگا کہ ہم بہت سی جگہ غفلت کرجاتے ہیں، تبلیغ نہیں کرتے یا اتنی قربانی نہیں دیتے جتنی ہمیں قربانی دینی اس لڑکی کو دلچسپی پیدا ہوئی اس نے چوہدری محمد علی صاحب سے پوچھا کہ یہ کون ہیںاور میں ان سے ملنا چاہتی ہوں(بعد میں وہ منصورہ بیگم سے بڑے پیار سے ملیں بھی) چوہدری صاحب نے کہا کہ امام مہدی آگئے ہیں اور یہ ان کے تیسرے خلیفہ ہیں اس نے آگے سے جواب دیا وہ دل میں بڑا درد اور دکھ پیدا کرنے والا ہے وہ کہنے لگی کہ امام مہدی آگئے ہیں تو مجھے کیوں علم نہیں؟ بات اس کی ٹھیک ہے ہماری غفلت ہے اُنہوں نے اسے یہی جواب دیا کہ یہ ہمارا قصور ہے کہ ہم نے تمہیں بتایا نہیں۔اس کا یہی مطلب تھا کہ اگر امام مہدی آگئے ہیں تو مجھے اس کا کیوں علم نہیں ہوا، میرے پاس کوئی بتانے والا کیوں نہیں آیا کہ امام مہدی آگئے ہیں۔
    پس دنیا یہ پکار پکار کر کہہ رہی ہے کہ اگر مہدی معہود مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام آگئے ہیںتو ہمیں علم کیوں نہیں ہوا دنیا کو بتانا ایک احمدی کا فرض ہے آسمان سے فرشتوں نے آکر نہیں بتانا اور اسی کی طرف میں انشاء اللہ اس خطبہ میں آپ کو لے کر آئوں گا۔ یہ محبت کا پیغام روز روشن کی طرح ان ممالک میں بھی اور جہاں میں نہیں جاسکا وہاں بھی ان پر عیاں ہوچکا ہے وہ اب ماننے لگ گئے ہیں کہ احمدی محبت اور پیار اور ہمدردی اور غم خواری اور مساوات کا پیغام لے کر ہمارے ملکوں میںآئے ہیں۔ مجھے بہت سے دوسرے ممالک کے سفراء ملے اور مجھ سے یہ کہنے لگے کہ ہم نے کیا قصور کیا تھا کہ آپ نے اپنے دورہ میں ہمارے ملکوں کو شامل نہیں کیا؟ میں ان کو کیا کہتا کہ تمہارا قصور ہے یا نہیں بہر حال اس سے پتہ لگتا ہے کہ انہیں احمدیت کی طرف توجہ ہے۔ دنیا میں اللہ تعالیٰ کے فرشتے بہت ساری تبدیلیاں کر رہے ہیںان تبدیلیوںکے آخری نتائج کو سنبھالنا انسان کاکام ہوتا ہے اور یہ جماعت احمدیہ کا کام ہے۔
    ان لوگوں میں ایک اور خوبی مجھے یہ نظر آئی کہ وہ صفائی کا بڑا خیال رکھتے ہیںیہاںتو یہ مشہور ہے کہ بڑی گندی اور بدبودار قومیں ہیں اب خدا تعالیٰ کے فضل سے صرف گھانا کے ملک میں منصورہ بیگم کے عورتوں کے مصافحے اور میرے مردوں کے جو مصافحے ہوئے ان کا ۲۵ہزار سے زائد کا اندازہ ہے۔ لیکن مختلف جلسوں میں شمولیت اگر۲۵-۳۰ ہزارمردوزن کریں تو اس سے صاف طور پر یہ نتیجہ نکلتا ہے کہ اس وقت وہاں کی ہماری بالغ آبادی دو اور تین لاکھ کے درمیان ہے، بچے اور بچیوں کو چھوڑکر،یقینا اتنی آبادی ہوگی خدا تعالیٰ کے فضل سے بڑی آبادی ہے اور سارے ممالک میں توہم نے بہت زیادہ مصافحے کئے ہیں اور میں نے ہزاروں معانقے کئے ہیں اور میرے خیال میں ہزاروں ہی کی تعداد میں بچوں سے پیار کیا ہے اور سارے دورے کے اندر سوائے ایک یا دو کے کسی سے بدبو نہیں آئی ہزاروں میں سے ایک دو کا ہونا محض استثناء ہے۔ غرض ان میں بدبو نہیںہے وہ اتنے صاف لوگ ہیں اور صفائی کے اتنے شوقین ہیں کہ ان چھ ملکوں میں سے کسی جگہ بھی ایسا نہیں ہوا کہ مجھے پانی نظر آیا ہو اور وہاں افریقن کپڑے نہ دھو رہے ہوںمیں نے بڑا غور کیا جہاں کہیں بھی مجھے پانی نظر آیا میں نے اس پر افریقنیوں کو کپڑے دھوتے ہوئے پایا وہ د ن میںتین دفعہ نہاتے ہیںیہاں بھی اگر میں پوچھوں(لیکن میں پوچھوں گا نہیں) تو شاید صرف سینکڑوں ہی ایسے نکلیں جو دن میںدو۲ دفعہ نہاتے ہوں گے مگر وہ دن میںتین دفعہ نہاتے ہیںاور ان میںسے بعض ایسے ہیں جو دن میں پانچ دفعہ کپڑے بدلتے ہیں۔وہ جُبّوں کے بڑے شوقین ہیں(مجھے بھی انہوں نے پیار سے ان جُبّوں کے تحفے دیئے ہیں) بس دن میں کئی دفعہ جُبّے بدلتے رہتے ہیں اور ان جُبّوں کے ساتھ ان کی شکلیں بھی بدل جاتی ہیں پہچاننا بھی مشکل ہوجاتا ہے۔ پس بہت صاف ملک ہیں لو گ بڑے صاف رہتے ہیں دل سے دعا نکلتی تھی کہ جس طرح اللہ تعالیٰ نے ان قوموں کو ظاہری صفائی کی توفیق عطا کی ہے اللہ تعالیٰ ایسے حالات پیدا کردے کہ ان کی باطنی صفائی کے بھی سامان ہوجائیں یہ ہماری ذمہ داری ہے ہم نے جاکر ان کی باطنی صفائی کے انتظام کرنے ہیںاللہ تعالیٰ نے ان کی باطنی صفائی کے جمعدار ہمیں بنایا ہے ہمارے سوا دوسرا کوئی باطنی صفائی کر ہی نہیں سکتا جب اللہ تعالیٰ نے اس کام کے لئے آپ کو چُنا ہے اور سوائے آپ کے کسی کو نہیں چنا پھر یہ ناشکری ہوگی کہ ہم اپنے کام سے گھبرائیں۔
    میں نے ان کو وہاں یہ بھی کہا کہ میں یہاں آیا ہوں اور تم خوش ہو خوشی کی کوئی انتہا ہی نہیں تھی میں اس کو بیان نہیں کرسکتا۔ میری نظریں شرم سے جھک جاتی تھیں اور مجھ میںخدا تعالیٰ کی حمد کی طاقت نہیں ہے وہ مصافحہ کرتے تھے اور خاموشی سے چہرہ دیکھنے لگ جاتے تھے پیچھے سے دوسرا آدمی ٹہو کا دیتا تھا کہ چل آگے لیکن یہ نہیں کہ کوئی بات کرنی ہے اس لئے ٹھہر گئے ہیں بس چہرہ دیکھے جارہے ہیں کئی ایک سے میں نے پوچھا بھی کیا سیری نہیں ہوتی دیکھتے ہی چلے جاتے ہو اور اتنا پیار دیکھا کہ بیان نہیں کرسکتا وہ احمدیت سے پیار ہے، وہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے پیا رہے، وہ حضرت مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم سے پیارہے، اللہ تعالیٰ سے پیار ہے کہ ان کے ذریعہ سے (اصل تو توحید کا قیام ہے) خداتعالیٰ کے پیار کو دنیا میں قائم کیا گیا ہے وہی ایک واحد ویگانہ ہے باقی توسارا فسانہ ہے اللہ تعالیٰ کی ذات ہی حقیقت اور وہی باقی رہنے والی ہستی ہے۔
    مثلاً ایک بڑھیا جسے پوری طرح نظر بھی نہیں آتا تھا سفر بھی نہیں کرسکتی تھی اس نے دو مہینے خرچ کرکے ایک ٹوکرا بنایا اور اپنی بیٹی کو بھیجا اور تاکید کی کہ اپنے ہاتھ سے دینا اور دعا کے لئے کہنا وہ بچی کہنے لگی کہ میری ماں سفر نہیں کرسکتی تھی مجھے اس نے یہ ٹوکرا دے کر بھیجا ہے اس کے بنانے پر اس نے دو ماہ خرچ کئے ہیں ہمارے ساتھیوںسے غلطی ہوئی وہ سیرالیون میں رہ گیا میں نے کہا یہ ٹوکرا پیچھے نہیں رہے گا چنانچہ وہاں تاردی اور اسے ہوائی جہاز کے ذریعہ لندن منگوایا اور اب اسے میں یہاں لے آیا ہوں میں نے ان سے کہا کہ تم یہ دیکھتے ہوکہ بازار میں اس کی قیمت دس۱۰ روپے ہے اور میں یہ دیکھتا ہوں کہ جس پیار نے اس کو بنایا ہے دنیا میں اس کی کوئی قیمت نہیں ہے، یہ تو میں چھوڑ کر نہیں جائوں گا بعض نے کہا کہ یہ کپڑا چھ ماہ سے تیار کرنا شروع کیا تھااور اب ہم اس کو تیار کرکے آپ کے لئے لائیں ہیں دھاگہ بھی ہم نے بنایا پھرکپڑا بھی ہم نے اپنے ہاتھ سے بنایا اور پھر اسے آخری شکل جو دینی تھی وہ بھی اپنے ہاتھ سے دی یہ کھدر کے بڑے موٹے وزنی کپڑے ہیں آپ انہیں دیکھیں گے تو کہیں گے کہ بازارمیں شاید سات ساڑھے سات روپے میں مل جائیں لیکن میں نے کہا میںان کو نہیں چھوڑوں گا چاہے ان کے کرایہ پر ہزاروں روپے ہی کیوں نہ خرچ کرنے پڑیںکچھ ہمارے ساتھ آگئے ہیں کچھ کے یہاں لانے کا ہم انتظام کرکے آئے ہیں وہ سارے انشاء اللہ یہاں پہنچ جائیں گے۔
    پس احمدیت کے ساتھ ان کا اس قسم کا پیار ہے اور و ہ احمدیت کے فدائی ہیں بالکل نڈر ہیں۔ لیگوس میں ہم پہنچے تو ہوٹل کے باہر سینکڑوں بچے تھے جو احمدیت زندہ باد، اسلام زندہ باد کے نعرے لگا رہے تھے۔ ’’زندہ باد‘‘ کا لفظ استعمال کرتے ہیں کیونکہ اسے سارے سمجھتے ہیں نیز اَھْـلًا وَّ سَھْـلًا کہہ رہے تھے پس وہ نعرے لگا رہے تھے جب میں آگے بڑھا تو ہمارے احمدی بھائی نعرے لگاتے ہوئے اس کے ایک بہت بڑے ہال میں داخل ہوگئے۔ چوتھی منزل پر ہمارے کمرے تھے جب ہم سیڑھیاں چڑھنے لگے تو یہ بھی نعرے لگاتے ہوئے ساتھ جارہے تھے یہاں تک کہ دروازہ آگیا اور یہ بھی ساتھ تھے صرف اس وقت ہی نہیں بلکہ اگر دن میں مجھے تین دفعہ نیچے اترنا ہوتا تو وہی نعرے لگتے جب بھی میں کمرے سے باہر آتا وہ نعرے لگاتے غیر ملکی یہ دیکھ کر حیران ہوتے اوردلچسپی لیتے اور شاید دل میں غصہ بھی آتا ہو مگر ان کو کسی سے کوئی غرض نہیں تھی وہ تو دل میں ایک جوش تھا کہ احمدیت نے ہمیں حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا روشن اور حسین چہرہ دکھایا اور اللہ قادرو توانا سے زندہ تعلق پیدا کیا۔
    بو ؔ(Bo)میں ہم گئے تووہاں گورنمنٹ کی لاج میں اتنا چراغاں تھاکہ جس طرح ربوہ نے چراغاں کیا وہاں بھی چراغاں تھا ہمارے ایک دوست نے کہا کہ آپ نے تکلف کیا ہے آپ نے یہاں اتنا خرچ کر دیا ہے اس نے آگے سے جواب دیا کہ ہمارے دلوں میں چراغاں ہورہا ہے ہم اپنے درودیوار کو اس سے محروم کیسے رکھ سکتے ہیں یہ ان کی قلبی کیفیت ہے اور یہ وہ محبت کا پیغام ہے جسے وہ آگے پہنچا رہے ہیں پس یہ وہ چیز ہے جو غیروں کے دل بھی جیت رہی ہے۔
    کماسیؔ میںReception(ری سیپشن)پر ایک بڑے اثرورسوخ والا افریقن آیا (وہاں کے جو پیرامائونٹ چیف ہیں وہ خود گفتگو نہیںکرتے انہوں نے اپنی طرف سے بیچ میں واسطے رکھے ہوئے ہیں اور یہ ان کےSpokesman(سپوکس مین) کہلاتے ہیں) چنانچہ ایک پیرامائونٹ چیف کاSpokesman(سپوکس مین)آیا وہ مسلمان نہیں تھا مجھ سے کہنے لگا کہ میں ڈیڑھ سومیل سے اس لئے آیا ہوں کہ میں بیمار ہوں اور آپ سے میں نے درخواست کرنی تھی کہ میرے لئے دعا کریں۔
    ایک اور پیرا مائونٹ چیف آئے ہوئے تھے وہ اپنے ساتھ ایک ممبرلیجسلیٹواسمبلی بھی لائے ہوئے تھے وہ مجھ سے کہنے لگے کہ میں اتنی دور سے آیا ہوں ہمارے علاقہ میں ڈاکٹر کی ضرورت ہے آپ وہاں میڈیکل سنٹر کھولیں اور یہ ایم۔پی(ممبرپارلیمنٹ) جو ہیں یہ اس بات کا ذمہ لیتے ہیں کہ حکومت کے قواعد کے مطابق(جسے Red tapism (ریڈ ٹیپ ازم ) کہتے ہیں) مختلف دفاتر سے جوکام کروانا ہوگا وہ یہ کروا کر دیں گے میں نے ان سے کہا ٹھیک ہے آپ یہ کام کروادیں ہم آدمی بھیج دیں گے۔
    میں نے بتایا کہ گوون نے میرے ساتھ اس طرح گفتگو کی جس طرح کہ وہ بڑا پرانا واقف ہو اس نے جماعت کی تعریف کی جماعتی خدمات کا وہ بہت ہی ممنون تھا اس کے دل میں بھی اور اسی طرح جو دیگرHeads Of State (ہیڈز آف سٹیٹ)ہیں جن سے مَیں ملا ہوں ان کے دلوں میں بھی جماعت کی بڑی قدر اور وقعت ہے جب تفصیل میں جائوں گا تو بتائوں گا کہ سب کی یہی حالت ہے۔
    پھر وہاں اللہ تعالیٰ کے جو فضل دیکھے تھوڑے سے ان کے نمونے بتا دیتا ہوں نائیجیریا سے میں نے کام شروع کیا نائیجیریا کے ایک احمدی گروہ نے حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ سے بغاوت کر کے اور دنیا کی حرص میں وہاں کے سارے سکولوںپر جو آپ نے کھلوائے تھے ناجائز طور پر قبضہ کر لیا غالباً یہ کُل گیارہ سکول تھے اورچونکہ اس وقت جماعت کا کوئی’’دستور‘‘ نہیں تھاConstitutionنہیں تھی اس واسطے قانونی طور پر کوئی چارہ جوئی نہ ہو سکتی تھی۔ ’’دین ‘‘ میں داخل ہوئے تھے اور’’دنیا‘‘ کے چھلکے پر ان کے پائوں پھسل گئے اور سکولوں پر قبضہ کر لیا جو ابھی تک جاری ہے لیکن ان کی حالت یہ ہے کہ خود ان میں بد اخلاقیاں پیدا ہوگئی ہیں دین سے کوئی رغبت نہیں رہی سکولوں کو انہوں نے آمدنی کا ذریعہ بنالیا ہے اور کچھ سکول شاید عنقریب بند بھی ہوجائیں ایسے لوگوں کو اللہ تعالیٰ دنیا میں بھی چکر دیتا ہے میں وہاں یہی سوچ رہاتھا تو میرے دل میں یہ خیال پیدا ہوا جو میری غیرت کا تقاضا تھاکہ ہم فوری طور پر ۱۶ سکول کھولیں چنانچہ میں نے سمجھدار احباب کی ایک کمیٹی بنائی اور ان سے میں نے کہا کہ اس ملک میں مَیں نے۱۶ ہائی سکول کھولنے ہیں اس لئے سلسلہ میں پانچ سالہ منصوبہ تیارکرو۔ مجھے یہ غیر ت تھی کہ ان کے چھوٹے بڑے ملا کر گیارہ سکول ہیں پس ہم یہاں انشاء اللہ سولہ ہائی سکول کھولیں گے میں نے انہیں یہ بھی کہا کہ میرے افریقہ چھوڑنے سے پہلے پہلے اس کمیٹی کی پہلی رپورٹ مجھے ملنی چاہئے اور انہیں میں نے یہ ہدایت کی کہ نقشے سامنے رکھو۔مشورے کرو اور دیکھو کہ کہاں کہاں سکول کھولنے چاہیںبہرحال ان کی پہلی رپورٹ مجھے وہیں مل گئی تھی لیکن جب میں نے یہ کمیٹی بنائی تو ہوا یہ کہ اگلے روز ویسے ہی بے خیالی میں ریڈیو کو میں نے چلایا خبروں کا وقت تھا۔ اس وقت شمال مغربی سٹیٹ کے گورنر کے انٹرویو کا خبروں میں اعلان ہورہا تھا(یہ شمال مغربی سٹیٹ مسلمانوں کا علاقہ ہے)کہ میری سٹیٹ میں تعلیم بڑی کم ہے اور میں نے ایمر جنسی کا اعلان کر دیا ہے میں اپنے ذرائع اکٹھے کررہا ہوں اور مجھے امید ہے عوام میرے ساتھ تعاون کریں گے میں نے ایک دن پہلے کمیٹی بنائی تھی چنانچہ جب میں نے یہ خبر سنی تو میں نے اس نو احمدی دوست جس کے متعلق آپ نے اخبار میں پڑھا ہوگاکہ میں نے کہا تھا Before the sun sets یعنی سورج غروب ہونے سے قبل تم احمدیت میں داخل ہوگے اور وہ ہوگیا تھا۔ یہ ڈپٹی سیکر ٹری ہے اور کھاتا پیتا آدمی ہے اس نے مرسیڈیز کار رکھی ہوئی ہے میں نے اسے کہا کہ تم جائواور اس گورنر سے کہو کہ ہم تمہاری سٹیٹ میں فوری طور پر چار سکول کھولتے ہیں دو۲لڑکیوں کے اور دو۲ لڑکوں کے ہمیں تمہارے تعاون کی ضرورت ہے اور یہ صرف دو۲ قسم کے تعاون ہیںایک یہ کہ سکول کھولنے کے لئے ہمیں زمین دو کیونکہ یہ ہم باہر سے نہیں لاسکتے اور دوسرے یہ کہ ٹیچرزکیلئے Entry permit (انٹری پرمٹ) دو کیونکہ اس کے بغیر وہ تمہاری سٹیٹ میں آنہیں سکتے چنانچہ وہ اس پیشکش کو سنکر بہت خوش ہوا اور کہنے لگا کہ میں آپ سے ہر قسم کا تعاون کروںگا سکولوں کے اجراء میں آپ ہماری مدد کریں۔ ویسے اس نے یہ بھی کہا کہ ایک فارمَل خط لکھ دیں کہ یہ ہم نے پیشکش کی ہے چنانچہ اس پر اس نے اپنےLand department(لینڈ ڈیپارٹمنٹ) کو کہا کہ جہاں بھی یہ زمین پسند کریں وہاں ان کو زمین دی جائے اورمحکمہ تعلیم کو کہا کہ ان کی طرف سے محکمہ میں مزید کسی درخواست کے آنے کا انتظار نہ کرو بلکہ جو فارمل کاروائی ہے یعنی فارم وغیرہ بھرنے ہوتے ہیں وہ فارم ان کو بھجوادو تاکہ یہ کاروائی جلدی ختم ہوجائے سکول ٹیچرز نے آنا ہے اوربہت ساری حکومت سے اجازتیں لینی پڑتی ہیں۔ وہ ہمارے’’وزیری‘‘ سے کہنے لگا(حالانکہ وہ غیر احمدی ہے) کہ میں بہت خوش ہوں آپ نے یہ کام اپنے ہاتھ میں لینے کی پیشکش کی ہے میں آپ کو یہ بتاتا ہوں کہ اگر آپ لوگ نارتھ ویسٹرن سٹیٹ یعنی سکوتو(جودراصل عثمان بن فودی کا گھر ہے یہ ایک مجدد تھے جواس علاقے میں پیدا ہوئے تھے میں ان کا ذکر وہاں جانے سے پہلے بھی کر چکا ہوں) کے علاقے کے لوگوں کے دل احمدیت کے لئے جیت لیں تو تمام شمالی مسلم علاقہ احمدی ہوجائے گا اس واسطے آپ کوشش کریں اور یہاں سکول کھولیں۔
    پھر اس کے بعد ہم گھاناؔمیں آئے وہاں غور کیا پھر آئیوری کوسٹ میں مشورے کئے پھر لائبیریا میں گئے وہاں غور کیا اور دوستوں سے مشورے کئے اورمنصوبے بنائے وہاں کے صدر مسٹرٹب مین بڑے اچھے آدمی ہیں انہوںنے سَوایکڑزمین کی منظوری دے دی ہے اور اپنے محکمے کو ہدایت کی ہے کہ یہ زمین جلد جماعت احمدیہ کو دی جائے یہ سَوایکڑ کا اکٹھا قطعہ ہے بڑی زمین ہے انشاء اللہ بہت کچھ بن جائے گا۔
    پھر سیرا لیون کو ہم نے اپنے واپسی کے پروگرام کی وجہ سے چھوڑا تھا کیونکہ ہیگ آنے کے لئے ہم نے یہیں سے جہاز لینا تھا اگر پہلے سیرالیون جاتے پھر گیمبیا جاتے اور پھر سیرا لیون جاتے تو یہ امر جماعت کے لئے بھی اور ہمارے لئے بھی کوفت کا باعث ہوتا اس لئے پروگرام بنایا تھا کہ پہلےOverfly(اوور فلائی) کرکے گیمبیا چلے جائیں یعنی اس ملک(سیرالیون) کے اوپر سے اڑ کر گیمبیا جائیں اور پھر وہاں سے واپس سیرالیون آئیں اور پھر یہاں سے یورپ کو آئیں۔گیمبیاؔمیں ایک دن اللہ تعالیٰ نے(میرے اپنے پروگرام نہیں رہنے دیئے بلکہ) بڑی شدت سے میرے دل میں یہ ڈالا کہ یہ وقت ہے کہ تم کم سے کم ایک لاکھ پائونڈ ان ملکوں میں خرچ کرو اور اس میں اللہ تعالیٰ بہت برکت ڈالے گا اور بہت بڑے اور اچھے نتائج نکلیں گے خیر میں بڑا خوش ہوا پہلے اپنا پروگرام اور منصوبہ تھا اب اللہ تعالیٰ نے منصوبہ بنا دیا ۔گیمبیا چھوٹا سا ملک ہے میرے آنے کے بعد مولویوں نے بڑی مخالفت شروع کردی ہے اور میں بہت خوش ہوں کیونکہ اس آگ میں سے تم ہم نے بہر حال گزرنا ہے ہمارے لئے یہ پیشگوئی ہے کہ آگ تمہارے لئے ضرور جلائی جائے گی جوالہام ہے ناکہ آگ سے ہمیںمت ڈرائو آگ ہماری غلام بلکہ غلاموں کی بھی غلام ہے۔اس میں دو۲ پیشگوئیاںہیں ایک یہ کہ تمہیں راکھ کرنے کے لئے آگ جلائی جائے گی اور دوسری یہ کہ وہ آگ تمہیں راکھ نہیں کرسکے گی بلکہ فائدہ پہنچانے والی ہوگی،تمہاری خدمت کرنے والی ہوگی پس جب اس پیشگوئی کاپہلا حصہ پورا ہوتا ہے یعنی آگ جلائی جاتی ہے ہم اس سے ڈرتے نہیں بلکہ خوش ہوتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے اپنے وعدے کے مطابق پہلی بات پوری کردی اور وہ قادروتوانا اپنے دوسرے وعدہ کو بھی ضرور پورا کرے گا اس لئے آگ ہمیں راکھ نہیں کرے گی بلکہ خدمت کرنے والی ہوگی بہرحال وہاں ہماری مخالفت شروع ہے اور میں خوش ہوں اللہ تعالیٰ سے آپ بھی دعائیں کریں میں بھی دعائیں کرتارہتا ہوں مخالفت کی یہ آگ ہمیں جلانے کے بجائے ہماری کامیابیوں پر فتح کے ہار گوندھے اوریہ آگ خوشیاں منانے والی ہواور اس آگ میں سے ہمارے اوپر آگ کے شعلوں کے بجائے پھولوں کی پتیاں برسیں یہی ہم سے وعدہ ہے اگروہ پورا ہوا ہے تو یہ بھی پورا ہوتا چلاجائے گا۔
    پھر جب ہم سیرالیون میںآئے تو اور زیادہ جرأت تھی کیونکہ اللہ تعالیٰ نے کہہ دیاتھا کہ کرو خرچ، میں اچھے نتائج نکالوں گا چنانچہ وہاں پروگرام بنائے پھرمیں لندن آیا تو میں نے جماعت کے دوستوں سے کہا کہ مجھے اللہ تعالیٰ کا یہ منشاء معلوم ہوا ہے کہ ان چھ افریقی ممالک میں تم کم ازکم ایک لاکھ پائونڈ خرچ کرو(ویسے یہ پوری سکیم میرے ذہن میں ہے کہ کس کس رنگ میں کام چلانا ہے) پس یہ ایک لاکھ پائونڈ کی رقم کم سے کم ہے اور اس سلسلہ میں انگلستان کی جماعتوں میں سے مجھے دوسو ایسے مخلص آدمی چاہئیںجودوسو پائونڈ فی کس کے حساب سے دیں اور دوسو ایسے مخلصین جو ایک سوپائونڈ فی کس کے حساب سے دیں اور باقی جو ہیں وہ ۳۶ پائونڈ دیں ان میں سے بارہ پاؤنڈ(ایک پائونڈ ایک مہینے کے لحاظ سے)فوری طور پر دے دیں میں نے انہیں کہا کہ قبل اس کے کہ میں انگلستان چھوڑوں اس مَد میں دس ہزار پائونڈ جمع ہونے چاہئیںاور اس وقت انگلستان سے روانگی میں بارہ دن باقی تھے چنانچہ دوستوں کے درمیان میں صرف دو۲ گھنٹے بیٹھا ایک جمعہ کے بعد اور دوسرے اتوار کے روز جس میں اور نئے آدمی بھی آئے ہوئے تھے اور ان دو۲ گھنٹوں میں ۲۸ ہزار پائونڈ کے وعدے ہوگئے تھے اور ۳ اور ۴ ہزار پائونڈ کے درمیان نقد جمع ہوگئے تھے میں نے پھر اپنے سامنے نیا اکائونٹ کھلوایا اور اس کا نام’’نصرت جہاں ریزروفنڈ‘‘ رکھا ہے یہ اکائونٹ وہیں رہے گا وہیں اس میں رقم جمع ہوگی غرض’’نصرت جہاں ریزرو فنڈ‘‘ کے نام سے ایک علیحدہ اکائونٹ کھلوایااور اس میں رقم جمع کروائی کیونکہ اس سے پہلے جو رقمیں آرہی تھیں وہ مسجد فنڈ کے اکائونٹ میں جارہی تھیں۔
    میں نے جمعہ کے خطبہ میں انہیں کہا کہ یہ اللہ تعالیٰ کا منشاء ہے کہ ہم یہ رقم خرچ کریں اورہسپتالوں اور سکولوں کیلئے جتنے ڈاکٹر اور ٹیچر چاہئیں وہاں مہیا کریں میں نے دوستوں سے کہا کہ مجھے یہ خوف نہیں ہے کہ یہ رقم آئے گی یا نہیں یا آئے گی تو کیسے آئے گی یہ مجھے یقین ہے کہ ضرور آئے گی اور نہ یہ خوف ہے کہ کام کرنے کے لئے آدمی ملیں گے یا نہیں ملیں گے یہ ضرور ملیں گے کیونکہ خدا تعالیٰ نے کہا ہے کہ کام کرو۔ خدا کہتا ہے تویہ اس کاکام ہے لیکن جس چیز کی مجھے فکر ہے اور آپ کو بھی فکر کرنی چاہئے وہ یہ ہے کہ محض خدا کے حضور قربانی دے دینا کسی کام نہیں آتا جب تک اللہ تعالیٰ اس قربانی کو قبول نہ کرلے۔ لاکھوں لاکھ قربانیاں حضرت آدمؑ کے زمانے سے اس وقت تک روکی گئیں جن کا ذکر مختلف احادیث میں موجود ہے پس مجھے یہ فکر ہے اور آپ کو بھی یہ فکر کرنی چاہئے اس لئے دعائیں کرو اور کرتے رہو کہ اے خدا! ہم تیرے عاجز بندے تیرے حضور یہ حقیر قربانیاں پیش کررہے ہیں تو اپنے فضل ا ور رحم سے ان قربانیوں کو قبول فرما اور تو ہمیں اپنی رضا کی جنت میں داخل فرما سعی مشکورہو ہماری، وہ سعی نہ ہو جو ہمارے منہ پر ماردی جائے اللہ تعالیٰ کا دیا ہوا مال ہم اسی کے حضور پیش کرتے ہیں اس کا احسان ہے کہ وہ ہماری طرف سے قبول کر لیتا ہے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے اور آپ کا فرمودہ درّثمین میں مندرجہ آمین میں یہ چھوٹا سا مصرعہ بڑاہی پیارا ہے۔’’گھر سے تو کچھ نہ لائے‘‘۔ (درثمین صفحہ ۳۶) پس یہ ایک حقیقت ہے کسی بات پر ناز کیا؟ اور قربانی کیا؟ اور ایثار کیسا؟ اور تم پیش کیا کررہے ہو یہ تو اس کا احسان ہے کہ وہ کہتا ہے اے میرے بندے! میں نے جو تمہیں مال دیاتھا وہ تو اب میرے سامنے اخلاص اور پیار سے اور میری محبت میں میرے حضور پیش کررہا ہے میں اس کو اس طرح قبول کر لیتا ہوں جس طرح واقعی تیرا ہے یہ تو اس کا احسان ہے۔ وہاں افریقہ میں بچوں نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی فرمودہ ایک حدیث کوگا کربطور نظم پیش کر رہے تھے ایک نظم پڑھی تھی پوری تو مجھے یاد نہیں عربی میں ہے اور بہت ہی اچھی ہے۔ بچوں کے نرم نرم ہونٹوں سے بڑی پیاری لگتی تھی ؎
    یَا ابْنَ اٰدَمَ اَلْمَالُ مَالِیْ
    وَالْجَنَّۃُ جَنَّتِیْ وَ اَنْتُمْ عِبَادِیْ
    یَا عِبَادِیْ اشْتَرُوْا جَنَّتِیْ بِمَالِیْ
    یعنی اے آدم کے بیٹو! مال بھی میرا ہے اور جنت بھی میری ہے اور تم بھی میرے بندے ہو۔ اے میرے بندو! میں تم پر یہ احسان کرتا ہوں کہ جومیری جنت ہے وہ میرے اس مال سے خرید لو جومیں نے تمہیں دیا ہے بچوں کے نرم نرم ہونٹوں سے نکلی ہوئی یہ نظم بہت ہی پیاری لگتی تھی۔
    بہرحال یہ ایک حقیقت ہے جس سے کوئی ہوش مند انسان انکار نہیں کرسکتا کہ مال بھی اللہ کا اور جنت بھی اللہ کی اور بندہ بھی اللہ کا اور اللہ تعالیٰ بطور احسان یہ فرماتا ہے کہ میرے مال سے میری جنت خرید لو پس میں نے اپنے بھائیوں سے یہ کہا کہ مجھے یہ فکر نہیں کہ مال کیسے آئے گا؟ مال تو انشاء اللہ ضرور آئے گا کیونکہ خدا کہتا ہے خرچ کرو اب ایک شخص کو خدا کہے کہ خرچ کرو اور جیبیں اس کی رکھے خالی پھر تو وہ ہندوئوں کا خدا ہوگا یا عیسائیوں کا خدا ہوگا یاان مسلمانوں کا خدا ہوگا جو یہ کہتے ہیں کہ ایک مسلمان کو سچی خواب بھی نہیں آسکتی ہمارا وہ خدا نہیں ہمارا خدا توقادر و توانا خدا ہے وہی اللہ جو ہمارے محبوب محمدصلی اللہ علیہ والہٖ وسلم پر اپنی تمام طاقتوں اور صفات کے ساتھ جلوہ گر ہوا وہ ہم سے بولتا بھی ہے اور ہم دن رات اس کی قوت اور طاقت کے معجزانہ سلوک اپنے ساتھ دیکھتے بھی ہیں۔فکر یہ ہونی چاہئے کہ اللہ تعالیٰ ہماری سعی کو سعئی مشکور بناوے یہ نہ ہوکہ خدانخواستہ کہیں ہماری کسی غلطی یا غفلت یا گناہ یا برائی یاکسی وقت کے تکبر کے نتیجہ میں وہ دھتکاردی جائے۔ امام رفیق صاحب نے مجھے کہا وقت تھوڑا ہے اور آپ نے اتنی بڑی رقم جماعت کے ذمہ لگا دی ہے جو فضل عمر فائونڈیشن کی ٹوٹل رقم سے دگنی سے بھی زیادہ ہے اور جسے انہوں نے تین سال کی کوششوں کے بعد اکٹھا کیا ہے چنانچہ اس سلسلہ میں چوہدری ظفراللہ خاں صاحب نے بڑے دورے کئے ہمارے شیخ مبارک احمد صاحب بھی مہینہ ڈیڑھ مہینہ وہاں رہ کر آئے اور دورے کئے تب جاکر تین سال میں ۲۱ ہزار پائونڈ جمع ہوئے اور میں نے دو۲ گھنٹے میں جو خطاب کیا تھا ان دو۲ گھنٹوںکے اندر اسی وقت۲۷-۲۸ ہزار پائونڈ کے وعدے اور نقد رقم جمع ہوگئی۔ یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے تھا میری طرف سے نہیں تھا لیکن اس کرسی اور مقام کی اللہ تعالیٰ غیرت رکھتا ہے جس مقام پر اس نے مجھے بٹھادیا ہے۔ امام صاحب مجھے کہتے تھے کہ یہ رقم جمع نہیں ہونی آپ مجھے مہلت دیں میںدورے کروں گا اور یہ دس ہزار پائونڈکی رقم جمع کروں گا۔ میں یہ سن کر ہنس پڑا میں نے انہیں کہا کہ میں ایک دن کی بھی مہلت نہیں دوں گا اور رقم جمع ہوجائے گی۔ خدا تعالیٰ مجھے کہے اور میں وہ بات آپ تک پہنچائوں اور وہ کام نہ ہو یہ تو ہو ہی نہیں سکتا۔ جس دن میںوہاں سے چلا ہوں اس دن ان رقوم کو نکال کر جن کی اطلاع ہمیں مل چکی تھی کہ وہ مختلف شہروں سے چل پڑی ہیں دس ہزارچارسو پچاس کے لگ بھگ نقد اس مد میں جمع ہوچکے تھے اور اگر ان رقوم کو بھی ملا یا جائے جن کی اطلاع ہمیں مل چکی تھی تو پھر گیارہ ہزار بلکہ اس سے بھی زیادہ کی رقم عملاً جمع ہوچکی تھی اور میرا اندازہ ہے کہ ایک مہینے کے اندر وہ پندرہ ہزار سے اوپر نکل جائیںگے اورادھرفضل عمر فائونڈیشن میں ۲۱ ہزار ٹوٹل اور وہ بھی تین سال کی بڑی کوششوں کے بعد اور ادھر چالیس ہزار اس وقت تک ہوگیا تھا۔ میں نے کہا تھا کہ پچا س ہزار تک پہنچ جائو میں بڑا خوش ہوں گا ممکن ہے پچاس ہزار سے بھی اوپر نکل جائیں مَیں نے انہیں یہ کہا کہ اللہ تعالیٰ نے کہا ہے کام کرو اور میں اس کے مطابق کام کروں گا اب جماعت کو میں نے یہ نہیں کرنے دینا کہ وہ(افریقہ والے تو) کہیں کہ کام تیار ہے پیسے بھیجو اور میں کہوں کہ ہوں تو میں بڑا امیر لیکن میری دولت کا انحصار صرف وعدوں پر ہے میرے پاس وعدوں کے گٹھڑ جمع ہیں اور جب وہ پورے ہوجائیں گے تو میں تمہیں بھجوا دوں گا یہ تو نہیں ہوسکتا کام تو بہر حال ہونا ہے اور تم سے لینا ہے مثلاً انگلستان میں ہمارے بعض ڈاکٹر ہیں وہیں پریکٹس کررہے ہیں ان سے میں نے کہا دیکھو مجھے ڈاکٹروں کی ضرورت ہے تم اخلاص سے اور محبت سے اور ہمدردی سے میری آواز پر لیبک کہو ڈاکٹر تو ویسے انشاء اللہ مجھے ضرور ملنے ہیں لیکن تم رضا کارانہ طورپر اپنی خدمات پیش کرواگر خود نہیںکرو گے تو میں تمہیں حکم دوں گا اور میرا حکم بہرحال ماننا پڑے گا کیونکہ حکم عدولی تو وہی کرے گا جو احمدیت کو چھوڑنے کے لئے تیار ہو گا اور جو احمدیت سے نکل جائے اس کی نہ مجھے ضرورت ہے نہ میرے اللہ کو ضرورت ہے چنانچہ انہیں بڑی خوشی ہوئی اور انہوں نے اپنی خدمات پیش کیں۔ امام رفیق کے پاس بنک کا مینیجر آیا ہوا تھا اسی اکائونٹ کے کھولنے کے سلسلہ میں بعض فارم پر کروانے ہوتے ہیں وہ مجھ سے بھی ملنے آیا تو میں نے اسے یہ واقعہ سنایا تو وہ بڑا خوش ہوا اور خوب ہنسا کہنے لگا یہ خوب ہے۔رضا کارانہ طور پر اپنی خدمات پیش کرو یا پھر میں تمہیں حکم دوں گا جو تمہیں بہرحال ماننا پڑے گا پھر وہ کہنے لگا کہ کیا ان میں سے کسی نے رضا کارانہ طور پر اپنی خدمات پیش کی ہیں؟ میں نے کہا ہاں جنہوں نے رضاکارانہ طور پر پیش کی ہیں انہیں ثواب بہرحال زیادہ ملے گا اس وقت حالت یہ ہے کہ اگر ہم ۳۰ میڈیکل سنٹر کھول دیں تو اس کا وہاں اچھا اثر پیدا ہوگا کہ ہم ایک ایک ملک میں ہر سال ایک ایک نیا ہائی سکول کھولتے چلے جائیں گے اس دورہ سے جماعت کو اور مجھے جو سب سے بڑا فائدہ ہوا ہے وہ یہ ہے کہ میں نے اپنی آنکھوں سے وہاں کے سارے حالات دیکھے اوراب میں علیٰ وجہ البصیرت کوئی کام کرسکتا ہوں پہلے تو میں رپورٹوں پر فیصلے کیا کرتا تھا ا ب میں ہر آدمی کو جانتا ہو۔
    ویسے اللہ تعالیٰ کے فضل کا یہ حال ہے کہ پچھلے جماعتی الیکشن پر ہمارے غانا کے پریذیڈنٹ صاحب کے دماغ میں یہ کیڑا پیدا ہوا اور انہوں نے یہ کہا کہ اگر مجھے دوبارہ منتخب نہ کیا گیا تو میں فساد پیدا کروں گا مجھے یہ اطلاع ملی تو میں نے ان کو تار دی کہ تم انتخاب نہ کروائو میں خود انتظام کروں گا یہ دو مہینے پہلے کی بات تھی اب جب میں وہاں گیا توایک مجلس عاملہ اور دوسرے کرتا دھرتا افریقن بیٹھے ہوئے تھے میں نے باتوں باتوں میں ان کی طرف دیکھ کر یہ فقرہ کہا کہ میں نےEx-president(سابق پریذیڈنٹ) کے لئے ایک تحفہ رکھا ہوا ہے۔ میں چاہتا ہوں کہ ان کے کان میں یہ بات پڑجائے اور وہ ذہنی طور پر تیار ہوجائیں۔ سب نے یہ سنا اور سمجھ گئے پھر میں نے ایک دن مجلس عاملہ کی میٹنگ بلاکرکہا کہ دیکھو دنیا کی کوئی قوم اور کوئی جماعت ترقی نہیں کیا کرتی جب تک وہ اپنے سابق عہدیداروں کی عزت اور تعظیم نہ کرے مثلاً اگر ایک ملک ایسا ہو کہ وہ سیاسی طور پر سابق پریذیڈنٹ کو کتا کہنے لگ جائے تو جب چارپانچ کتے بن جائیں یعنی جب بھی وہ پریذیڈنسی سے ہٹیں گے وہ کتے کہلائیںگے اور جب وہ ہٹ جائیں گے وہ غیر ملک والے یہی سمجھیں گے کہ کتوں کی قوم ہے کتوں کو پریذیڈنٹ بناتی ہے۔ پس دنیامیں ترقی کرنے اور دنیا کے وقار اور عزت کو حاصل کرنے والی قوم کے لئے یہ ضروری ہے کہ جو اہل ہو اس کو عہدیدار بنائیں اورجب یہ عہدیدار بدلے تو اسی طرح عزت وتکریم کریں جس طرح اس کی عہدیدار ہونے کی حیثیت میں کرتے تھے کسی عربی شاعر نے کہا کہ ہم سرداروں کی قوم ہیں اور میرے پیچھے سرداروں کا ایکQueue(کیو) لگا ہو اہے جب ہماری قوم کا ایک سردار اس دنیا سے چلا جاتا ہے توپچھلا ایک قدم آگے بڑھکر اس کی جگہ لے لیتا ہے اور وہ سردار بن جاتا ہے کیونکہوہ سرداروں کی قوم ہے۔ جماعت احمدیہ بھی سرداروں کی قوم ہے اللہ تعالیٰ نے اس کو سرداری کے لئے قیادت کے لئے دنیا میں پیدا کیا ہے نظام احمدیت میں ہرایکس (یعنی سابق) اچھا ہے اگر اچھا نہیں توتم جنہیں خدا نے کہا تھا کہ امانتیں اہل لوگوں کو سپرد کیا کرو تم نے کیوں نہ ایسا کیا اور اگر یہ امانت اہل کے سپرد کی تو پھر اس کی عزت اورتعظیم ضروری ہے۔ اس طرح جب میں ان کو سمجھا چکا تو پھر میں نے انہیں کہا کہ دو ماہ پہلے تمہارا انتخاب ہونا تھا مگر نہیں ہوا کیونکہ میں نے منع کر دیاتھا قانونی طور پر اس وقت جو عہدیدار ہیں وہ میرے ہی مقرر کردہ ہیں کیونکہ الیکشن تو نہیں ہوا اور اب میں ان کوبدلنا چاہتا ہوں اور میں مشورہ کے بعد سارے بدل دوں گا اور ان کی طرف اشارہ کرتے ہوئے میں نے کہا کہ یہ تمہارے سابق پریذیڈنٹ ہیں ان کی عزت کرنی ہے پھر جس طرح بچوں کوپیار کرتے ہیں اسی طرح ان کوپیار دیا ایک تحفہ بھی دیا اور اس طرح ان کو خوشی خوشی علیحدہ کردیا لیکن اللہ تعالیٰ کی شان دیکھو ان کے خلاف ایک مقدمہ چل رہا تھا۔ انہوں نے یہ نالائقی کی کہ مجھ سے دعا بھی نہیں کر وائی شاید اللہ تعالیٰ انہیں کوئی دوسرا نشان دکھا دیتا۔ میں اس ملک سے دوسرے ملک چلا گیا اور ابھی پانچ دن نہیں گزرے تھے کہ مجھے اطلاع آئی کہ ان کو ایک سال کی قید ہوگئی ہے اور وہ جیل میں چلے گئے ہیں۔ میں بہت خوش ہوا میں نے کہا اللہ تعالیٰ نے اس مقدمے کے فیصلے سے پانچ دن پہلے مجھ سے فیصلہ کروادیا اور اس فیصلے کو روکے رکھا کہ دنیا یہ نہ کہے کہ جماعت احمدیہ کا پریذیڈیٹ قید میں گیا ہے اب وہ پریذیڈنٹ نہیں پریذیڈنٹ کے عہدے سے ہٹ گیا ہوا ہے اور وہاں کی جماعت نے اس کو محسوس کیا کہ اللہ تعالیٰ کی شان ظاہر ہوئی ہے اور بڑے خوش ہوئے کہ دیکھوحضرت صاحب نے فیصلہ کیا اور پانچ دن کے بعد وہ فیصلہ ہو گیا جو جماعت کی بدنامی کا باعث بن سکتا تھا پس یہ چھوٹی چیزیں اور بڑی چیزیں سب اللہ تعالیٰ کے فضل ہیں اور میں نے وہاں اللہ تعالیٰ کے اتنے فضلوں کو دیکھا ہے کہ’’تہی اس سے کوئی ساعت نہیں ہے‘‘اور اس طرح حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے شعر کے مطابق ’’ہوا میں تیرے فضلو ں کا منادی‘‘ (درثمین صفحہ۵۲) کیونکہ میں نے اپنی زندگی میں کوئی گھڑی ایسی نہیں پائی جس میں اللہ تعالیٰ کا فضل نازل نہ ہوا اورکوئی گھڑی ایسی نہیں جس میں انسان پر یہ ذمہ داری نہ آتی ہو کہ وہ اس کے فضلوں کا منادی بنے اتنے فضل ہیں اتنے فضل ہیں کہ شمار نہیں کئے جا سکتے۔ آپ یہ سوچیں کہ سات ہزار میل کے فاصلے پر مغربی افریقہ کے ممالک ہیں جب انہوں نے محبت اور خوشی کے اظہار کئے تو میں نے بڑی استغفار کی، بڑی دعا کی ان لوگوں کے لئے، بڑا فکر اور غور کیا پھر مجھے مسئلہ سمجھ میں آگیا وہاں پہنچنے کے چند دن بعد ایک دن کھڑا ہوا اور میں نے ان سے کہا کہ آپ بے حد خوش نظر آتے ہیں اورآپ خوشی کے مستحق ہیں اس لئے آپ کو خوش ہونا چاہئے آپ اس لئے خوش ہیں کہ جماعت احمدیہ کی قریباً اسی سالہ تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے اورآپ لوگوں کی زندگیوں میں بھی یہ پہلا موقع ہے کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا وہ محبوب مہدی جو امت محمدیہ میں واحدویکتا ہے۔ حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کو کوثر عطاہونے کا وعدہ دیاگیا تھا کہ بے شمار فدائی تجھے دئے جائیں گے۔ اس وعدہ کے پورا ہونے پر اس امت مسلمہ میں سے جو اتنی بڑی ہے کہ اس کا شمار نہیں صرف ایک کوچُنا اور اس کے متعلق فرمایااِنَّ لِمَھْدِیْنَا۔اپنا مہدی کہا اور صرف نہ اس ایک کے متعلق فرمایا کہ جب بھی وہ آئے تو جو بھی امت محمدیہ کے افراد اس زمانہ میں ہوں ان کا یہ فرض ہے کہ وہ میری طرف سے اسے سلام پہنچائیں۔ بڑی قدردانی اورپیار کا اظہار ہے یہ اتنی قدر دانی ہے کہ جس کی کوئی انتہا نہیںوہ محبوب اور وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے اس محبوب کا ایک خلیفہ تمہارے درمیان موجود ہے اللہ تعالیٰ نے تمہیں یہ توفیق عطا کی ہے کہ تم اسے دیکھو تم اس سے باتیں کرو اور تم اس کی باتیں سنو تم اس کے وجود اور اس کے کلمات سے برکت حاصل کرو۔
    خوش ہو اورخوشی سے اچھلو کہ آج کا دن تمہارے خوش ہونے کا دن ہے میں نے انہیں کہا کہ تم بھی خوش اور میں بھی خوش۔ تم تو اس لئے خوش ہو کہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سب سے زیادہ محبوب روحانی فرزند کا ایک خلیفہ تم میں موجود ہے اور میں اس لئے خوش ہوں کہ آج سے اسّی سال قبل ایک یکا و تنہا آواز ایکUnknown(اَن نون) یعنی غیر معروف گائوں سے اٹھی تھی جس کا مقصد اللہ کے حکم اللہ کی توحید کو قائم کرنا اورحضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی عظمت اور جلال کو دنیاپر ظاہر کرنا تھا لیکن تھی وہ اکیلی آواز، مگر دنیا نے اسے نہیں پہچانا اور ساری دنیا اپنی تما م طاقتوں کے ساتھ اس آواز کو خاموش کرنے کے لئے اکٹھی ہوگئی مگر ساری دنیا کی ساری طاقتیں اس آواز کو خاموش کرنے میں کامیاب نہ ہوسکیں۔ تمہارے منہ سے جو درود نکل رہاہے تمہارے چہروں پر جو محبت کی بشاشت ہے تم میں سے ہر ایک فرد دلیل ہے اس بات کی کہ وہ اکیلی آواز ایک سچے اور صادق کی آواز تھی جھوٹے کی آواز نہیں تھی اور جب میں یہ دیکھتا ہوں تو میں بھی خوش ہوں تم اپنی جگہ پر خوش ہوکہ تم نے مجھے دیکھا اور میں اپنی جگہ پر خوش کہ میں نے تمہیں دیکھا۔ سات ہزار میل دور نہ کبھی تم وہاں گئے نہ دیکھا مگر اللہ تعالیٰ کے فرشتوں نے تمہارے دلوں کو بدل دیا اور تمہارے دلوںمیں اس محبوب محمدمصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت کو پیدا کر دیا وہ آواز جس کو خاموش کرنے کے لئے ساری دنیا کی طاقتیں مسلمان بھی عیسائی بھی، ہندو بھی ، یہودی بھی اور بدھ بھی غرض ساری طاقتیں اکٹھی ہوگئی تھیں اور یہ دعویٰ کرتے تھے کہ وہ اس آواز کو خاموش کردیں گے مگر خدا نے کہا کہ یہ دنیا تو کیا اس قسم کی ہزاروں دنیا اور ہزاروں دنیا کی سب طاقتیں آجائیں تب بھی یہ آواز خاموش نہیں کی جا سکے گی کیونکہ یہ میری آواز ہے یہ اس بندے کی آواز نہیں اور تم دلیل ہواس بات کی کہ وہ سچا تھا ورنہ یہاں نہ وہ جماعتیں پیدا ہو سکتیںجو ہو گئیں نہ ہی ان دلوں میں وہ محبت پیدا ہوسکتی جو پیدا ہوئی نہ میں اس پیار کو دیکھ سکتا جوتمہارے چہروں پر مجھے نظر آرہا ہے پس وہ بھی خوش تھے اور میں بھی خوش تھا آپ بھی خوش ہوئے کہ اللہ تعالیٰ نے بڑا فضل کیا۔ میں نے شروع میں یہ فقرہ کہا تھا کہ میں ان کے لئے محبت اور پیار اور ہمدردی اور غمخواری اور اسلامی مساوات کا پیغام لے کر گیا تھا اورآپ کے پاس جب آیا ہوں تو اللہ تعالیٰ کے فضلوں کے منادی کی حیثیت سے واپس آیا ہوں اتنے فضل اتنے فضل کہ آپ ان کا اندازہ بھی نہیں لگا سکتے۔
    گرمی بھی بڑی ہے مجھے بھی لگ رہی ہے آپ کو بھی لگ رہی ہے اورشاید آپ میں سے چند میرے ساتھی ہونگے جیسا کہ میری عادت ہے کہ میں جمعہ کی نماز سے پہلے کھانا نہیں کھایا کرتا اسلئے میں بغیر کھانا کھائے آیا ہوں پس بھوکا بھی ہوں اورگرمی کا بیمار بھی ہوں لیکن کہنے کو جتنامیرا دل کرتا ہے کہوں گا اور میںدس منٹ اور بولوں گا انشاء اللہ۔
    غرض اللہ تعالیٰ کے فضل ہررنگ میں ظاہر ہوئے ایک مثال دیتا ہوں ہم سیرالیون میں اترے تو اللہ تعالیٰ کے پیار کا یہ جلوہ نظر آیا کہ جماعت کے علم کے بغیر ریڈیو والوں نے یہ انتظام کیا ہوا تھا کہ لاج تک پہنچنے تک آنکھوں دیکھا حال براڈ کاسٹ کریں گے(ہمیں لاج تک جہاں ہم نے رہائش رکھنی تھی پہنچنے میں ڈیڑھ گھنٹہ لگا)اس وقت ریڈیو پر رننگ کمینٹری جسے آنکھوں دیکھا حال کہتے ہیں شروع ہوئی اور وہ لگاتار ڈیڑھ گھنٹے تک یہ آنکھوں دیکھاحال براڈ کاسٹ کرتا رہا اب یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے ہر آدمی نے یہ پروگرام سنا سارے لوگ پہچاننے لگ گئے تھے مگر اب وہ عزت اور عظمت کے جلوے کے ساتھ پہچانتے تھے فوجی افسر جب گزرتے تھے تو وہ باقاعدہ سلوٹ کرتے تھے میں نے سوچا کہ اس میںمیری ذاتی کیاعزت ہے اور نہ مجھے اس کی خواہش اور نہ ضرورت۔ میجر جنرل یا کمانڈر انچیف مجھے سلام کرے تو اس میں ذاتی طور پر کیا عزت یہ اس خدا کی عزت کا اظہار ہے جس نے اس اکیلے(مہدی معہود علیہ السلام) کوکہا تھا میں تیرے ساتھ ہوں تو دنیا کی پروانہ کراور پھر اپنے عمل سے ثابت کیا کہ وہ واقعی مسیح موعود اور مہدی مہود کے ساتھ تھا، دنیا کی قطعاً پرواہ نہیں کی بے خوف ہوکر بولے بھی تقریریں بھی کیں باتیں بھی کیں اور اللہ تعالیٰ کی حمد کے ساتھ ان عزتوں کو قبول کیا ورنہ اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں عزتیں چاہئیں،دنیا کی عزتیں ہیں کیا چیز؟ایک عارف انسان کی نظر میں دنیا کی عزتوں کی تو ایک ذرہ کے برابر بھی حیثیت نہیں لیکن خدا تعالیٰ کی شان کا مظاہرہ تھا اس کی قدرت اور پیار کے جلوے نظر کے سامنے تھے عیسائی ہمیں دیکھ کر ناچ رہے ہیں مسلمان جوہیں(میں نام نہیں لوں گا)ان کی اور ہی کیفیت تھی وہ اپنی مشکلات بیان کرکے دعا کی درخواست کرتے وقت اچھے خاصے پڑھے لکھے ہونے کے باوجود زارو قطار رو بھی رہے ہیں اور ساتھ ہی اپنی درخواست بھی پیش کر رہے ہیں یہ بھی نظارے ہم نے دیکھے بہتوں کے لئے دعائیں کیں اور بعض وہیں پوری بھی ہوگئیں وہاں ایک بہن ملیں اس وقت مجھے یاد نہیں آرہا غالباً بو(Bo) میں تھیں منصورہ بیگم سے جب ملاقات کے لئے آتی تھی چمٹی رہتی تھی اس کا قصہ یہ تھا کہ پورے ۳۹ سال ان کی شادی کو ہوگئے تھے اور کوئی بچہ نہیں تھا(اس وقت صحیح یاد نہیں منصورہ بیگم کہتی ہیں کوئی بچہ نہیں تھا میرا خیال ہے کہ کوئی لڑکا نہیں تھا) بہر حال جوبھی تھا ۳۹ سال ہوئے تھے شادی ہوئے مگر لڑکا کوئی نہ تھا یا اس کا بچہ ہی کوئی نہ تھا اور پھر اس نے خلافت ثالثہ کے شروع زمانہ میں(پہلے وہ سستی کرتی تھی ورنہ یہ نعمت شاید اسے بہت پہلے مل جاتی )لکھنا شروع کیا اور شادی کے ۴۰ سال بعد اللہ تعالیٰ نے اسے لڑکا عطا کیا چنانچہ وہ کوئی ۳ سال کے قریب کا بچہ تھا وہ اسے لے کر آتی تھی اور مزید دعا کے لئے کہتی تھی شادی کے چالیس سال کے بعد جبکہ اس کی عمر ۵۰،۶۰ سال کے قریب تھی بچہ پیدا ہوا اگر پندرہ سال کی عمر میں بیاہی گئی تو تب بھی اسکی عمر ۵۵ سال کی ہوگی اور اگر۱۲ سال میں بیاہی گئی تو ۵۲ سال کی عمر ہوگی پورے ۴۰ سال کی محرومی کے بعد اللہ تعالیٰ نے اسے اولادعطا فرمائی اس قسم کے معجزے پہلوں نے بھی دیکھے اور اس وقت بھی اللہ تعالیٰ اپنی بے حد شان دکھا رہا ہے مسلمان ممالک میںبھی عیسائیت قابض ہے کیونکہ مسلمان پڑھے لکھے نہیں نوے فیصد عیسائی کام کرنے والے ہیں اور عیسائیت کے خلاف ہماری مہم اور عیسائیت کے خلاف میرے نعرے لیکن تعاون کا یہ حال کہ صبح سات بجے کی خبروں میں (یہاں بھی قریباً سات بجے صبح خبریں آتی ہیں) اس میں رات دس بجے اور صبح سات بجے کی خبر کے درمیان جو میرا پروگرام تھا اس کے متعلق خبر پھر سات کے بعد ایک بجے کے درمیان کے جو پروگرام تھے ان کی خبر پھر ایک بجے اور پانچ بجے کے درمیان جو واقعات ہوئے پانچ بجے کی خبروں میں ان کے متعلق خبراور پھر پانچ اور رات کے نوبجے کے درمیان واقعات ہوئے رات کے نوبجے کی خبروں میںان کے متعلق خبر نشر ہوئی تھی یوں کہنا چاہئے کہ ایک نمائندہ قریباً۲۴ گھنٹے ساتھ لگا رہتا تھا پھر آپس میں جو بایتںکررہے ہیں ان کے ریکارڈ کرنے کے لئے مائیک سامنے آجاتا تھا ۔ بو(Bo) میں جو فری ٹائون سے۱۷۰ میل ہے ریڈیو کی ایک نمائندہ ہر وقت باہر بیٹھی رہتی تھی جوں ہی میں باہر نکلا اس نے ٹیپ ریکارڈر آن کیا اور پاس آگئی اور پھر وہ نیوز بلیٹن سے پہلے خبریں بجھواتی تھی ایک دوفقرے نہیں بلکہ بعض دفعہ پندرہ منٹ کی خبروں میں پانچ پانچ منٹ تک ہمارے متعلق خبریں ہوتی تھیں کہ فلاں جگہ گئے یہ ہوا فلاں سے باتیں کیں مسجد کا بنیادی پتھر رکھا یا لڑکوں کو مخاطب کیا اور اس میں یہ یہ ان کو کہا علاوہ اس امید کے پیغام کے جس کامیں ذکر کر چکاہوں میں ان کو مایوسی کے دور کرنیوالا پیغام بھی دیا کرتا تھا۔کیونکہ بڑا ظلم ہوا ہے ان پر ایک طبقہ میں مایوسی بھی پائی جاتی تھی پس اللہ تعالیٰ نے اس کی بھی توفیق دی کہ میں ان کی مایوسیوں کی دور کروں اور امیدوں کو ابھاروں تاکہ آئندہ نسلیں مسرت کی زندگی گزار سکیں ہماری دعاہے کہ وہ دینی اور دنیوی ہر لحاظ سے بہتر زندگی گزارسکیں۔ جس نمائندہ عورت کا میں ذکر کررہا ہوں اس نے دیکھا کہ میں نے سکول میں ایک لڑکے کو اپنی جیب سے دوپائونڈ نکال کردیئے علاوہ اس انعام کے جواسے سکول کی طرف سے ملنے والا تھا بعد میں وہ ہمارے پرنسپل سے کہنے لگی کہ یہ بچہ ہے اس نے یہ پائونڈ خرچ کردینے ہیں اور یہ بڑا ظلم ہوگا اس لئے تم اسے کہو کہ ایک پائونڈ میرے پاس بیچ دے کیونکہ میں اسے خرید کر تبرک کے طور پر اپنے پاس رکھنا چاہتی ہوں پرنسپل نے مجھے بتایا میں نے کہا اس بچے کو محروم نہ کریں میں اسے ایک پائونڈ دے دیتا ہوں چنانچہ میں نے دستخط کر کے ایک پائونڈ اسے دے دیا پھر اس نے منصورہ بیگم سے کہا کہ ہمارا آدھا خاندان مسلمان ہے آدھا عیسائی ہے انہوں نے مجھ سے ذکر کیا میں نے اسے تبلیغ کی اور اسے بتایا کہ عیسائیت یہاں یہ دعویٰ لے کر آئی تھی کہ مسیحیت کے پاس محبت کا پیغام ہے مگر وہ ناکام ہوئی اور عیسائی اقوام نے تم پر ظلم ڈھائے اب ہم آئے ہیں قریباً پچاس سال سے تمہارے ملک میں کام کررہے ہیں اور تم اپنی آنکھوں سے دیکھ رہی ہو کہ سوائے ہمدردی اور مساوات اور اخوت کے اور کوئی جذبہ ہمارے دلوں میں نہیں ہے یہ لو بیعت فارم تم اسے پڑھو اور اللہ کے حضور دعا کرو میں نے اسے یہ نہیں کہا کہ ابھی احمدی ہوجائو کیونکہ یہ دل کا معاملہ ہے جب تک دل نہیں مانے گاتمہارے احمدی ہونے کا کوئی فائدہ نہیں ہے اللہ تعالیٰ کے حضور تم دعا کرو اگر احمدیت یعنی اسلام سچا ہے توا للہ تعالیٰ تمہیںاس کے قبول کرنے کی توفیق عطا فرمائے اگر تمہارے اوپر روشنی ظاہر ہوجائے تو میں یہ ضرور کہوں گا کہ پھر کسی سے نہ ڈرنا اپنے باپ سے بھی نہ ڈرنا اور سچائی کو قبول کر لینا اس کی طبیعت پر یہ اثر تھا کہ چلتے وقت اس نے منصورہ بیگم سے کم ازکم آٹھ دس دفعہ کہا کہ حضرت صاحب سے میرے لئے دعا کی درخواست کرتی رہیں کہ اللہ تعالیٰ مجھے صداقت کو قبول کرنے کی توفیق دے آپ بھی دعا کریں۔
    اللہ تعالیٰ کے فضل جس قوم پر نازل ہورہے ہوں اس پر بڑی بھاری ذمہ داریاں عائد کرتے چلے جاتے ہیں میری طبیعت پر اثر ہے اور میرے دل میں بڑی شدت سے یہ بات ڈالی گئی ہے کہ آئندہ۲۳-۲۵ سال احمدیت کے لئے بڑے اہم ہیں کل کا اخبار آپ نے دیکھا ہوگا حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ نے۴۵ ۱۹ء میں کہا تھا کہ اگلے بیس سال احمدیت کی پیدائش کے ہیں اس واسطے چوکس اور بیداررہو بعض دفعہ غفلتوں کے نتیجہ میں پیدائش کے وقت بچہ وفات پا جاتا ہے میں خوش ہوں اور آپ کو بھی یہ خوشخبری سناتا ہوں کہ وہ بچہ ۱۹۶۵ء میں بخیر وعافیت زندہ پیدا ہوگیا جیسا کہ آپ نے کہا تھا کہ میرے دل میں یہ ڈالاگیا ہے کہ وہ بچہ خیریت کے ساتھ ،پوری صحت کے ساتھ اور پوری توانائی کے ساتھ۱۹۶۵ء میں پیدا ہوچکا ہے۔ اب ۱۹۶۵ء سے ایک دوسرا دور شروع ہوگیا اوریہ دور خوشیوں کے ساتھ قربانیاں دیتے ہوئے آگے ہی آگے بڑھتے چلے جانے کا ہے۔ اگلے ۲۳ سال کے اندر اللہ تعالیٰ کے منشاء کے مطابق اس دنیا میں ایک عظیم انقلاب پیدا ہونے والا ہے یا دنیا ہلاک ہوجائے گی یا اپنے خدا کو پہچان لے گی یہ تو اللہ تعالیٰ کو معلوم ہے میرا کام دنیا کو انذار کرنا ہے اوروہ میں کرتا چلا آرہا ہوں آپ کا کام انذار کرنا اور میرے ساتھ مل کر دعائیں کرنا ہے تاکہ دنیا اپنے رب کو پہچان لے اور تباہی سے محفوظ ہوجائے۔
    اب جیسا کہ میں نے انگلستان میں اپنے دوستوں سے کہا تھا کہ مجھے یہ فکر نہیں ہے پیسہ کہاں سے آئے گاکیونکہ خدا تعالیٰ نے شروع خلافت میں مجھے یہ بتایا تھا ’’تینوں اینا دیاں گا کہ تورج جاویں گا‘‘ چنانچہ آپ نے دیکھا کہ دوگھنٹے میں۲۷-۲۸ہزار پائونڈ کے وعدے ہوگئے اور یہ بغیر کوشش کے ہوئے میں نے صرف یہ کہا تھا کہ میرے جانے سے پہلے پہلے دس ہزار پائونڈ کی رقم اس مد میں ضرور ہونی چاہئے۔ عہدیدار مایوس تھے لیکن میں ایک سیکنڈ کے لئے مایوس نہیں ہوا مجھے پتہ تھا کہ میرے خدا نے کہا ہے کام کرو اگر میرے پاس ایک لاکھ پائونڈ ہوتا اور میرا رب مجھ سے کہتا کہ کم ازکم ایک لاکھ پائونڈ خرچ کردوتومیں اپنا لاکھ پائونڈ خرچ کرکے آپ کے پاس آتا کہ میرے پاس جو تھا وہ میں نے خرچ کردیا اور یہ کم سے کم لیکن میں یہ سمجھتا ہوں کہ میں اس کا پہلا مخاطب ہوں مجھے کام کردینا چاہئے۔اب جب مجھے اس نے کہا کہ کم سے کم اتنا خرچ کرو تو مجھے پتہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ایک پیاری جماعت کی انگلی میرے ہاتھ میں دی ہے میں اس سے یہ کہوں گا اور وہ یہ کام کریں گے اللہ تعالیٰ جتنی مجھے توفیق دے گا میں بھی اس میں حصہ دونگا لیکن میں آپ کی بات کررہا ہوں۔
    پاکستان کے لئے میں نے اللہ تعالیٰ کے منشاء کے مطابق ایک سکیم بنائی ہے لیکن اس سے پہلے میں اس کی تمہید بیان کرنا چاہتا ہوں اور وہ یہ ہے کہ پاکستان میں فارن ایکسچینج کی تنگی رہتی ہے اورہمیں باہر بھیجنے کے لئے روپیہ نہیں ملتا۔ ہم قانون کی پابندی کرنے والے ہیں۔ کوپن ہیگن کی مسجد کے لئے ہماری بہنوں نے جوچندہ دیا تھا وہ رقم ابھی تک یہاں پڑی ہے اس کا فارن ایکسچینج نہیں ملا پس باوجود اس کے کہ ہمیں اس وقت باہر روپیہ بھجوانے کی اجازت نہیں ملے گی پھر بھی میں اپیل کروں گا اور آپ قربانی دیں گے انشاء اللہ اور یہ اسلئے کہ وہ خدا جو ہمیں قربانیاں پیش کرنے کے لئے کہتا ہے وہ ہمیں قربانیاں پیش کرنے کی توفیق بھی عطا فرماتا ہے جس خدا نے میرے دل میں بڑی شدّت کے ساتھ یہ ڈالا ہے اور فرمایا ہے کہ تومیرے لئے میری عظمت کے قیام کے لئے، حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کا پیار دلوں میں قائم کرنے کے لئے اس جماعت سے قربانیاں مانگ وہ دے گی۔ ہمیں یہاں قربانیاں دینی پڑیں گی وہ خدا یسے سامان پیدا کردے گا روپیہ باہر بجھوانے کے لئے انشاء اللہ سہولتیں پیداہوجائیں گی۔ یہی حکومت جوآج فارن ایکسچینج نہیں دے رہی کل کودینے لگ جائے گی حالات بدل جاتے ہیں ایک رات میں بدل جاتے ہیں لیکن جس صبح میں یہ دیکھوں کہ حالات بدل گئے اور آج میں رقم باہر بھیج سکتا ہوں وہ صبح ایسی نہیں ہونی چاہئے کہ میرے پاس رقم موجود نہ ہو(یہ نہیں کہ میں اعلان کروں اور رقموں کی وصولی کا انتظار کروں)میرے پاس خزانے میں رقم موجود ہونی چاہئے اور جس صبح کو میں یہ پائوں کہ آج سورج ایسے حالات میں طلوع ہوا ہے کہ ہمارے لئے روپیہ باہر بھجوانے کی سہولت ہے تو قبل اس کے دفاتر بند ہوں روپیہ باہر چلا جائے جیسا کہ میں نے وہاں انگلستان میں کیاکیونکہ اس وقت چلنے کا نہیں دوڑنے کا وقت آگیا ہے پھر یہ کہ ہم نے بہت سے کام کرنے ہیں مثلاً افریقہ کے لئے کتابیںشائع کرنا ہے کتابوں کے سلسلہ میں تو بعض ایسی چیزیں ہیں کہ ان کامیں آپ کے سامنے ذکر نہیں کرسکتا کیونکہ ممکن ہے کہ غیر مسلم ہوشیار ہوجائیں اور خرابی پیدا کرنے کی کوشش کریں غیر مسلم کا فقرہ میں نے جان کر کہا ہے میں غیر احمدی نہیں کہہ رہا وہ ایسا نہیں کرینگے۔ لیکن وہ چیز جو غیر مسلم کے خلاف بہت سخت جاتی ہے وہ کتابوں کے ذریعہ ہوسکتی ہے اور کتابیں ہم نے یہاں شائع کرنی ہیں اور اس پر خرچ ہوگا اور دوسرے کام ہیں جب اللہ تعالیٰ سامان پیدا کرے گا ہم فوراً رقم باہر بھجوا دیں گے۔
    پاکستان کے (احباب جماعت کے) لئے میں نے یہاں مسجد میں مغرب کے بعد بات کی تھی۔ اس وقت مجھے ایک بات کے متعلق شبہ تھا اب میں وہ پوری سکیم بیان کردیتا ہوں الفضل والے ابھی نوٹ کریں اور دکھا کر کل صبح کے اخبار میں آجائے مجھے پاکستان کے دوسو ایسے مخلصین کی ضرورت ہے جو پانچ ہزار روپیہ فی کس دیں جس میں سے ہر وعدہ کنندہ دوہزار روپے فوری طورپر(جس کے معنے ہیں اگلے نومبر تک)ادا کردے۔ اسکو میں فوری کہتا ہوں کیونکہ میری آواز ہر ایک کے کانوں تک پہنچنے میں وقت لگے گا پھر تیاری کرنا ہے کسی کے پاس رقم نہیں ہوتی، کسی نے روپے وصول کرنے ہوتے ہیں بہرحال فوری سے میری مراد نومبر ہے اور اس طرف بھی بعض دوستوں نے توجہ دلائی تھی کہ زمینداروں کو نومبر میں ادا کرنے کی سہولت ہوگی اسلئے دوایک ماہ بڑھا کر فوری کی یہ مہلت نومبر تک بڑھا دی ہے پس پانچ ہزارمیں سے دوہزار روپے نومبر تک مل جانے چاہئیں اور بقیہ تین ہزار اپنی سہولت کے ساتھ تین سال میں ادا کریں لیکن یہ دو ہزار روپے نومبر سے پہلے ملنا چاہئے ان دو سو مخلصین کے علاوہ مجھے دو سو ایسے مخلصین کی ضرورت ہے جو دوہزار فی وعدہ کریں۔ اس میںسے ایک ہزار فوری(اس معنے میں)اور بقیہ ایک ہزار تین سال میں بسہولت ادا کریں اس کے علاوہ مجھے کم ازکم ایک ہزار ایسے مخلصین کی ضرورت ہے(خدا کرے کہ ان کی تعداد دوہزار سے بھی بڑھ جائے) جو/-۵۰۰روپے اس مد میں دینے کا وعدہ کریں جس میں سے/-۲۰۰روپے فوری دیں اور بقیہ /-۳۰۰روپے جب چاہیں اپنی سہولت کے ساتھ اگلے تین سال کے اندر ادا کردیں۔اور ان چودہ سو مخلصین کے علاوہ جو دوست/-۵۰۰سے کم رقم دینا چاہتے ہیں ہم نے ان کے وعدے نہیں لینے بلکہ وہ اس مد میں(جوکھل چکی ہے) خزانہ میں جمع کروائیں اور رسید لے لیں اورمجھے اطلاع کردیں میں ان کے لئے اللہ تعالیٰ کے حضور عاجزانہ دعا کروں گا کہ اللہ تعالیٰ ان کی قربانی کو قبول فرمائے لیکن اپنا اور دوسروں کا وقت ضائع نہ کریں مثلاً اگر وہ اپنی رقم غلط جگہ بھیج دیں گے تو اس دفتر کا وقت ضائع ہوگا’’نصرت جہاں ریزروفنڈ‘‘ کی مد ربوہ کے خزانہ میں قائم ہوچکی ہے وہاں رقم جمع کروائیں اور ان سے رسید لے لیں اور مجھے اطلاع کردیں۔ میں آپ سے وعدہ کرتا ہوں کہ آپ کے لئے خاص طور پر دعا کروں گا لیکن /-۵۰۰سے کم رقم دینے والوں سے وعدہ نہیں لیا جائے گا دوست جتنا دینا چاہتے ہیں و ہ نقد خزانہ میں جمع کروا دیں پھر اللہ تعالیٰ اور توفیق دے تو اور رقم بھی جمع کروادیں البتہ ہم وعدہ کے رجسٹر میں ان کا نام نہیں لکھیں گے۔ رجسٹر صرف ان کا بنے گا جو/-۵۰۰یااس سے زائد رقم کا وعدہ کریں گے۔
    اب ایک صف تو ’’نصرت جہاں ریز روفنڈ‘‘ میں پانچ ہزار روپے یا اس سے زائد دینے والوں کی ہوگی کیونکہ اس میں یہ شرط تو نہیںکہ پانچ ہزار سے زائد نہیں دینے اگر کسی کو اللہ تعالیٰ پانچ لاکھ کی توفیق دیتا ہے تو اسے پانچ لاکھ کی رقم پیش کردینی چاہئے۔ غرض پانچ ہزار یااس سے زائد دینے والوں کی صف اوّل، دوہزار یا دوہزار سے زائد پانچ ہزار تک یا۴۹۹۹ روپے تک دینا چاہتے ہیں ان کی صف نمبر۲ اور جو پانچ سو سے زائد یعنی۱۹۹۹ روپے تک دینا چاہتے ہیں ان کی صف نمبر۳ ہوگی جو زائد رقم ہوگی اس کابھی ۳/۲حصہ نقد دینا پڑے گا۔’’پنج دوونجی‘‘زمیندار دوست سمجھ جاتے ہیں کہ پنج دووَنجی میں سے دودونجی فوری طور پر اور تین بعد میں لیکن صف چہارم وہ ہوگی جو وعدہ کے کاغذوں میںExist(اگزسٹ) نہیں کرے گی لیکن خزانہ کے اموال میں وہ موجود ہوگی یعنی جس کو پانچ روپے کی یا،دس روپے کی، یا چار سوروپے کی،یاساڑھے چار سو روپے کی توفیق ہے وہ اسے خزانہ میں داخل کروائے وہاں سے رسید لے اور دعائیں کرے کہ اللہ تعالیٰ قبول فرمائے۔ مجھے بھی ضرور اطلاع دے میں ایک غلط فہمی دور کرنا چاہتاہوںبعض لوگوں کا یہ بڑا اچھا جذبہ ہے کہ وہ قربانی دیتے ہیں مگر’’کسی‘‘کو خبر نہیں ہونے دیتے۔خلیفہ وقت’’کسی‘‘ نہیں ہوا کرتا کیونکہ اس سے آپ نے دعائیں لینی ہیں اس سے برکتیں حاصل کرنی ہیں جن کی فطرتیں ایسی ہیں جو بڑی پیاری فطرتیں ہیں وہ کسی کو نہ بتائیں خزانہ میں جمع کروائیں لیکن مجھے ضرور بتائیں تاکہ میں ان کا نام لیکر اللہ تعالیٰ کے حضور عاجزانہ طورپرجھکوں اور ان کے لئے دعائیں کروں۔ میں تو’’کسی‘‘ہوں ہی نہیں۔میں تو آپ کے وجود کا حصہ ہوںپس مجھے ضرور اطلاع دیں۔وہ دوست جو زیادہ رقم دینے والے ہیں یعنی پانچ سو سے دوہزار تک، دوہزار سے پانچ ہزارتک اورپانچ ہزار سے اوپرجہاں تک مرضی ہو ان کے نام ہمیں بہرحال لکھنے پڑیں گے اوران کو یاد دہانیاں بھی کروائی جائیں گی انگلستان سے میں ان سب دوستوں کے نام اور پتے لے آیا ہوں جنہوں نے اس فنڈ کے لئے وعدے کئے ہیں میرے ذہن میں یہ ہے کہ آج سے چھ ماہ کے بعد بطور reminder (ریمائنڈر) ہرایک کو ایک عام خط لکھوں گا اور پھر چھ ماہ کے بعد دوسرا خط لکھوں گاکہ یا تو فوری ادا کرو یا اگلا سال آرہا ہے نصف دوسرے سال میں جو باقی رہ گیا یہ وہ ادا کرو۔ پس انشاء اللہ وہ ضرور دیں گے میں نے شروع میںبتایا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے مجھے یہ کہا ہے کہ میرے نام پر قربانیاں لیتاجا اور جماعت وہ قربانیاں دیتی چلی جائے گی میرا کام ہے کہ میں سوچوںاوراللہ تعالیٰ کی منشاء کے مطابق اپنا ہر منصوبہ بنائوں۔
    جیسا کہ میں نے بتا یا ہے سپین کے متعلق میں نے ابھی کوئی منصوبہ نہیں بنایا کیونکہ اگر میں صحیح سمجھا ہوں اللہ تعالیٰ کا منشاء بھی یہی ہے میں بہت پریشان تھا سات سو سال تک وہاں مسلمانوں کی حکومت رہی ہے اس وقت کے بعض غلط کار علماء کی سازشوں کے نتیجہ میں وہ حکومت مسلمانوں کے ہاتھ سے نکل گئی وہاں کوئی مسلمان نہیں رہا ہم نے نئے سرے سے تبلیغ شروع کی چنانچہ اس ملک کے چند باشندے احمدی مسلمان ہوئے وہاں جاکر شدید ذہنی تکلیف ہوئی۔ غرناطہ جو بڑے لمبے عرصہ تک دارلخلافہ رہا جہاں کئی لائبریریاں تھیں، یونیورسٹی تھی جس میں بڑے بڑے پادری اور بشپ مسلمان استادوں کی شاگردی اختیار کرتے تھے، مسلمان وہاں سے مٹا دئیے گئے غرض اسلام کی ساری شان وشوکت مادی بھی اورروحانی بھی اور اخلاقی بھی مٹادی گئی ہے طبیعت میں اس قدر پریشانی تھی کہ آپ اندازہ نہیں کرسکتے غرناطہ جاتے وقت میرے دل میں آیا کہ ایک وقت وہ تھا کہ یہاں کے درودیوار سے درود کی آوازیں اٹھتی تھیں آج یہ لوگ گالیاں دے رہے ہیں طبیعت میں بڑا تکدّر پیدا ہوا چنانچہ میں نے ارادہ کیا کہ جس حد تک کثرت سے درود پڑھ سکوں گا پڑھوں گا تاکہ کچھ توکفارہ ہوجائے لیکن اللہ تعالیٰ کی حکمت نے مجھے بتائے بغیر میری زبان کے الفاظ بدل دیئے گھنٹے دوگھنٹے کے بعد اچانک جب میں نے اپنے الفاظ پر غور کیا تو میں اس وقت درود نہیں پڑھ رہا تھا بلکہ اس کی جگہ لَا اِلٰـہَ اِلاَّ اَنْتَ اور لَااِ لٰـہَ اِلاَّ ھُوَ پڑھ رہا تھا یعنی توحید کے کلمات میری زبان سے نکل رہے تھے تب میں نے سوچا کہ اصل تو توحید ہی ہے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی بعثت بھی قیام توحید کے لئے تھی میں نے فیصلہ تو درست کیا تھا یعنی یہ کہ مجھے کثرت سے دعائیں کرنی چاہئیں لیکن الفاظ خود منتخب کرلئے تھے۔ درود سے یہ کلمہ کہ اللہ ایک ہے زیادہ مقدّم ہے چنانچہ میں بڑا خوش ہوا کہ اللہ تعالیٰ نے خود ہی میری زبان کے رخ کو بدل دیا۔ ہم غرناطہ میں دوراتیں رہے دوسری رات تو میری یہ حالت تھی کہ دس منٹ تک میری آنکھ لگ جاتی پھر کھل جاتی اور میں دعا میں مشغول ہوجاتا ساری رات میں سونہیں سکا ساری رات اسی سوچ میں گزر گئی کہ ہمارے پاس مال نہیں یہ بڑی طاقتور قومیں ہیں مادی لحاظ سے بہت آگے نکل چکی ہیں ہمارے پاس ذرائع نہیں ہیں وسائل نہیں ہیں ہم انہیں کس طرح مسلمان کریں گے؟ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کا جو یہ مقصد ہے کہ تمام اقوامِ عالم حلقہ بگوشِ اسلام ہوکر حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خادم بن جائیں گی یہ بھی اقوامِ عالم میں سے ہیں یہ کس طرح اسلام لائیں گی اور یہ کیسے ہوگا؟ غرض اس قسم کی دعائیں ذہن میں آتی تھیں اور ساری رات میرا یہی حال رہا چند منٹ کے لئے سوتا تھا پھر جاگتا تھا پھر چند منٹ کے لئے سوتا تھا۔ایک کرب کی حالت میں میں نے رات گزاری وہاں دن بڑی جلدی چڑھ جاتا ہے میرے خیال میں تین یا ساڑھے تین بجے کا وقت ہوگا میں صبح کی نماز پڑھ کر لیٹا تو یکدم میرے پرغنودگی کی کیفیت طاری ہوئی اور قرآن کریم کی یہ آیت میری زبان پر جاری ہوگئی:-
    وَمَنْ یَّتَوَکَّلْ عَلَی اللّٰہِ فَھُوَ حَسْبُہٗ۔اِنَّ اللّٰہَ بَالِغُ اَمْرِہٖ قَدْ جَعَلَ اللّٰہُ لِکُلِّ شَيْئٍ قَدْرًاo (الطّلاق:۴)
    اس بات کا بھی جواب آگیا کہ ذرائع نہیں کام کیسے ہوگا اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ پر توکّل رکھو اور جو شخص اللہ تعالیٰ پر تو ّکل رکھتا ہے اسے دوسرے ذرائع کی ضرورت ہی نہیں رہتی وہ اس کے لئے کافی ہے۔اِنَّ اللّٰہَ بَالِغُ اَمْرِہٖ اللہ تعالیٰ جو اپنا مقصد بناتا ہے اسے ضرور پورا کرکے چھوڑتا ہے اس لئے تمہیں یہ خیال نہیں آنا چاہئے، یہ خوف نہیں پیدا ہونا چاہئے کہ یہ نہیں ہوسکتا یہ ہوگا اور ضرور ہوگا کیونکہ یہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت کی غرض ہی یہ ہے کہ تمام اقوامِ عالم کو وحدتِ اسلامی کے اندر جکڑدیا جائے اور حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پائوں میں لاکر کھڑا کردیا جائے۔
    دوسرایہ خیال تھا کہ اور اس کے لئے میں دعا بھی کرتا تھا کہ خدایا یہ ہوگا کب؟ اِس کا جواب بھی مجھے مل گیا’’قَدْ جَعَلَ اللّٰہُ لِکُلِّ شَيْئٍ قَدْرًا‘‘ (الطّلاق:۴)اللہ تعالیٰ نے ہرچیز کاایک اندازہ اور تخمینہ مقرر کیا ہوا ہے جس وقت وہ وقت آئے گا ہوجائے گا تمہیں فکر کرنے کی ضرورت نہیں مادی ذرائع اگر نہیں ہیں توفکر نہ کرو اللہ کافی ہے وہ ہو کر رہے گا چنانچہ میرے دل میں بڑی تسلی پیدا ہوگئی اس کے متعلق میں نے آپ کے سامنے کوئی سکیم نہیں رکھی کیونکہ ابھی وہاں کے متعلق مجھے اللہ تعالیٰ کا منشاء معلوم نہیں ہوا البتہ سپین کے متعلق میں ایک کوشش کر رہا ہوں جس کوظاہر کرنا اس وقت مناسب نہیں لیکن جس کے لئے دعا کرنا آج ہی ضروری ہے اسلئے بڑی کثرت سے یہ دعاکریں کہ جس مقصد کے لئے میں سپین گیا تھا اور جس کے پورا ہونے کے بظاہر آثار پیدا ہوگئے ہیں۔ اللہ تعالیٰ اپنے فضل اور رحم سے ہمارا کام کردے کیونکہ ہم کمزور اور عاجز بندے ہیں پھروہ دن ساری امت مسلمہ کے لئے بڑی خوشی کا دن ہوگا بعض اس کو پہچانیں گے اور خوش ہوں گے بعض نہیں پہچانیںگے اور خوش نہیں ہوں گے یہ ان کی بدقسمتی ہوگی لیکن حقیقت یہ ہے کہ وہ دن ساری امتِ مسلمہ کے لئے خوشی کادن ہوگا۔
    میں نے مغربی افریقہ کے ممالک جہاں مسلمانوں کی بڑی بھاری اکثریت ہے ان میں سے بعض کے سفراء سے یہ کہہ دیا تھا کہ میرا ایک مشن ہے جس کے لئے میں سپین جارہاہوں اور تم دعا کرو اور اس سے اصل مقصد میرا یہ تھا کہ میں دعا کے لئے کہوں گا ان کے دل بھی احمدیت کی کوششوں کے بارے میں ایک دلچسپی اور پیار پیدا ہوگا چنانچہ وہ اتنے خوش ہوئے کہ آپ اندازہ نہیں کرسکتے اور انہوں نے بڑی دعائیں دیں بلکہ ان میں سے ایک نے مجھے کہا کہ مسٹر گرنیکو کو کہہ دینا کہ میرے چچا نے سپین کی اس وقت مدد کی تھی جب کہ انہیں مدد کی ضرورت تھی۔ اگر وہ آپ کا یہ کام کردیںتو میرا چچا بھی بہت خوش ہوگا غرض انہوں نے بڑی خوشی کا اظہار کیا لیکن میں نے نہیں کہا کہ اللہ تعالیٰ پر میرا توکل ہے اوروہ پورا کرے گا انشاء اللہ خداکرے کہ وہ وقت مقدر جلد آجائے اور ہمارے لئے آج ہی وہ خوشیوں کے دن کی ابتداء بن جائے۔
    بو(Bo)ؔمیں بھی گرمی میں مجھے سفر کے بعد بڑی کوفت کے باوجود کوئی اڑھائی ہزار احباب سے مصافحے کرنے پڑے تھے مجھے شبہ تھا کہ میں بے ہوش ہوکر نہ گر جائوں جب یہ کیفیت پیدا ہوئی تو میں نے پانی مانگا اور پھر میں نے ان سے کہا مجھے پانی پلاتے جائو یا شاید ڈاکٹر صاحب تھے ان کو خیال آیا غرض تھوڑی تھوڑی دیر کے بعد دوست مجھے پانی پلا دیتے تھے اور میں پھر وہ سلسلہ شروع کردیتا یہاں بھی میں یہی کررہا ہوں۔
    آج کے خطبہ میں مَیں نے بعض اصولی اور بنیادی باتوں کا ذکر کیا ہے افریقہ میں اسلام کا پیغام لوگوں تک پہنچاتے وقت مجھے ان کی یہ کیفیت بڑی پیاری لگی کہ مذہب دل کا معاملہ ہے۔ مذہب کے معاملہ میں لڑائی بالکل احمقانہ بات ہے چنانچہ وہ آپس میں بالکل نہیں لڑتے نہ عیسائی مسلمانوں سے اور نہ مسلمان عیسائیوں سے بلکہ امن سے وہ رہ رہے ہیں وہ آپس میں تبادلہ خیالات کرتے ہیں دلائل دیتے ہیں، ایسے دلائل کہ ان کو سن کر یہاں شاید لوگ ایک دوسرے کا سر پھوڑنے کے لئے تیار ہوجائیں مگر وہ بشاشت سے ایک دوسرے کی بات سنتے ہیں پھر اللہ تعالیٰ جس کے دل کی کھڑکیاں کھول دے وہ اسلام لے آئے وہ اور بات ہے لیکن ان کو یہ پتہ ہے کہ مذہب بہرحال دل کا معاملہ ہے اسے سر پھوڑ کر حاصل نہیں کیا جاسکتا۔ آپ یہ بھی دعا کریں کہ جن ملکوں میں یہ ذہنیت نہیں اللہ تعالیٰ ان ملکوں میں بھی یہ ذہنیت پیدا کردے اور ان کو بھی سمجھ آجائے میں تو بڑی تحدّی کے ساتھ یہ بات کیا کرتا ہوں اور مخالفِ اسلام کو شرمندہ کردیتا ہوں۔ ہوائی جہاز میں دوامریکن بیٹھے ہوئے تھے ہم۳۵ ہزار فٹ کی بلندی پر اڑرہے تھے کہ کسی چھوٹی سی بات پر ان سے واقفیت ہوگئی وہ میرے پیچھے ہی بیٹھے ہوئے تھے مجھے موقعہ مل گیا میں نے ان سے کہا کہ میںتو حیران ہوتا ہوں کہ فرد فرد سے نفرت اور حقارت کا اظہار کررہا ہے، قومیں قوموں کو نفرت اور حقارت سے دیکھ رہی ہیں۔پیار سے کوئی ایک دوسرے سے معاملہ نہیں کرتا میں نے ان سے کہا کہ وقت آگیا ہے کہ انسان انسا ن سے پیار کرنا سیکھے چونکہ ہیں تو یہ پڑھی لکھی ہوشیار قومیں نہ میں نے امریکہ کا نام لیا تھا اورنہ روس کا وہ آگے سے مجھے کہنے لگے کہ اب ہماری روس کے ساتھ Under Standing(انڈرسٹینڈنگ) ہوگئی ہے یعنی کچھ معاملہ فہمی ہوگئی ہے، ایک دوسرے کو سمجھنے لگے ہیں وہ سمجھ گئے کہ یہ ہمیں کو سمجھا رہا ہے میں نے ان سے کہا یہ ٹھیک ہے تمہاری روس سےUnder Standing(انڈر سٹینڈنگ) ہوگئی ہےBut out of fear__Not out of loveتم نے یہ سمجھوتہ اس خوف سے کیا ہے کہ ایک دوسرے کو ہلاک نہ کردیں۔ محبت کے نتیجہ میں یہ سمجھوتہ نہیں ہوا چنانچہ وہ گھسیانے سے ہوکر کہنے لگے بات آپ کی ٹھیک ہے لیکن بہرحال ایک قدم صحیح راستے کی طرف اٹھ کھڑا ہوا ہے میں نے کہا یہ ٹھیک ہے یہ میں مان لیتا ہوں لیکن یہ ظلم ہے کہ ہم محبت کرنا بھول گئے ایک مسلمان کے لئے لمحہ فکریہ ہے کہ جس کو وہ اپنا آقا ومطاع کہتے ہیں صلی اللہ علیہ وسلم جس کے متعلق وہ اس عقیدے کا اظہار کرتے ہیں کہ وہ اللہ کامحبوب اور اللہ کی محبت اس کی محبت کے بغیر حاصل نہیں کی جاسکتی اس کے مسلک کو چھوڑتے ہیںکس سے نفرت کی تھی محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کوئی ہمیں بتائے جب سختی کی اصلاح کے لئے کی آپ کی زندگی میں انسان کے لئے نفرت اور حقارت کاکوئی ایک واقعہ بھی نہیں دکھا سکتا انسان کی بداعمالیوں سے نفرت بھی کی، انہیں حقارت سے بھی دیکھا بد اعمالیوں سے ہمارا بھی حق ہے کہ ہم نفرت کریں ورنہ ہمارے اندر وہ اثر کریں گی جس سے ممکن ہے ہمارے بچے ہلاک ہوجائیں لیکن بد عمل یعنی برا عمل کرنے والے سے آپ نے نفرت نہیں کی اس یہودی سے آپ نے نفرت نہیں کی جس نے اپنی بیماری کی وجہ سے آپ کے بستر کو گندا کردیا تھا اس قوم سے نفرت نہیں کی جس نے سالہا سال تک آپ کو آپ کے صحابہؓ کو انتہائی تکالیف پہنچائیں، جنہوں نے اڑھائی سال تک شعب ابی طالب میں قید رکھ کر آپ کو بھوکے رکھ کر مارنا چاہا جب ان کی بھوک کا وقت آیا تو خدا کے اس بندے نے ان کے لئے روزی اور ان کے پیٹ بھرنے کا سامان پیدا کیا انہیں یہ نہیں کہا کہ تم حقیر اور قابل نفرت لوگ ہو۔ جائو مرجائو بھوکے مجھے اس سے کیا بلکہ انسانی ہمدردی جوش میں آئی اور انسانی بھائی کا پیار جوہے اس کی موجیں دل سے اٹھیں اور ان کی خدمت کے لئے(بہتوں کے پیٹ کاٹ کرشاید) پہنچ گئے کس انسان سے حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے نفرت کی تھی کہ کوئی آج ہم سے کہے کہ تم دوسرے انسان سے نفرت کرو اس سفر میں کئی جگہ جاہل اور کم علم لوگ مجھ سے یہی توقع کرتے رہے کہ میں نفرت کے بیان دوں۔ ان سے میں نے یہی کہا اور اپنے جلسوں میں بھی یہی کہا کہ مجھے خدا نے یہ حکم دیا ہے کہ تم تمام بنی نوع انسان کے دلوں کو محبت اور پیار کے ساتھ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جیتو۔ میں کسی قوم یا فرد سے نفرت نہیں کرسکتا اور نہ ان کو حقارت کی نگاہ سے دیکھ سکتا ہوں اللہ تعالیٰ نے ظلّی طور پر انہیں جس طرح وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے پیارے تھے میرے بھی پیارے بنا دیا ہے اور یہ میں نے اپنی زندگی میں مشاہدہ کیا ہے کہ پیار میں مَیں نے جو طاقت دیکھی ہے وہ دنیا کی تمام مادی طاقتوں سے بڑھ کر ہے اور پیار جو چیزیں جیت سکتا ہے وہ دنیا کی مادی طاقتیں نہیں جیت سکتیں۔ پس اے میرے پیارے احمدی بھائیوں اور بہنوں اور بڑوںاور بچوں! اس سبق کو یادرکھو۔ دنیا اپنی طاقت کے زعم میںدوسروں کوہلاک کرسکتی ہے اور ان کے سر پھوڑ سکتی ہے مگر میں اور تم اس غرض کے لئے پیدا نہیں کئے گئے ہم صرف ایک ہی مقصد کے لئے پیدا کئے گئے ہیں کہ ہم محبت اور پیار کے ساتھ دنیا کے دلوں کو حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جیتیں اور وہ توحید قائم ہو جس توحید کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اس دنیا میں قائم کرنا چاہتے تھے پس کسی سے نفرت نہ کرو۔ ہمارے اس ملک میں بھی ایک بے ہودہ اور گندی آگ سلگ رہی ہے خود کو اس کے اندر نہ پھینکو خود کو اس گند میں ملوث نہ کرو، کسی سے نفرت نہ کرو،گند کو دور کرنے کی کوشش کرو ظلم کو مٹانے کی کوشش کرو حق دار کو حق دلانے کی کوشش کرو تم ہر ایک سے محبت اورپیار سے پیش آئو انشاء اللہ۔ ایک دن آئے گا جب یہی لوگ شرمندگی کی وجہ سے آپ کے سامنے آنکھیں اٹھا کر نہیں دیکھ سکیں گے کیونکہ انہوں نے آپ کو ہرقسم کے دکھ پہنچائے اور آپ کو انتہائی حقارت کی نگاہ سے دیکھا لیکن اس کے بدلے میں انہوں نے آپکی طرف ذرا بھی دکھ نہیں پایا اور نہ انہوں نے اپنے لئے آپ کی نگاہ میں سوائے پیار کے کوئی اور جذبہ موجزن پایا۔ اللہ تعالیٰ ہم میں سے سب کو اس کی توفیق عطا فرمائے ہمارا یہی ایک ہتھیار ہے اور بڑا پیارا ہتھیاراور اسی ہتھیار کے ساتھ ہم نے اللہ تعالیٰ کی منشاء کے مطابق دنیا کے دل جیتنے ہیں اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطا فرمائے اللّٰھمّ اٰمین۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۱۵ جولائی ۱۹۷۱ء صفحہ۱ تا ۱۵)
    ززز









    مغربی افریقہ میںکام کرنے والیہمارے
    اکثر مبشرین کو مقامِ نعیم حاصل ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۱۹ جون۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہکی تلاوت کے بعد حضور انورنے قرآن مجید کی یہ آیات پڑھیں:-

    اور پھر فرمایا:-
    ان آیا ت میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ وہ لوگ جونیکیوں میں آگے بڑھ جاتے اور سبقت لے جاتے ہیں انہیں مقامِ نعیم میں رکھا جاتا ہے ان کا مقام وہ مقام ہے کہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہروقت نعمتوں کا نزول ان پر ہوتا رہتا ہے اور اس مقامِ نعیم کی وجہ سے اور اس لئے کہ اللہ تعالیٰ کی نعمتوں سے وہ وافر حصہ پاتے ہیں ان کے چہروں پر اللہ تعالیٰ کے فضلوں کی شادابی دنیا دیکھتی ہے محبت الٰہی میں ہروقت وہ مست رہتے ہیں اور یہ محبتِ الٰہی ان کے رگ وریشہ میں کچھ اس طرح سرایت کرجاتی ہے کہ ان کے وجود مُشک کی طرح مہک اٹھتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کی محبت کی خوشبو لوگ بھی ان کے وجود سے سونگھتے ہیں فرمایا کہ یہ وہ مقام ہے کہ ایک خواہش کرنے والے، ایک آرزو کرنے والے کو چاہئے کہ اس مقام کی خواہش کرے اس سے نیچے کی خواہش توکوئی خواہش نہیں۔ انسان کواس مقام کے لئے پیدا کیا گیا ہے اور یہی آرزو ہونی چاہئے کہ اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے مقامِ نعیم عطا کرے اور یہ وہ مقام ہے کہ حقیقی عزت اور حقیقی شان انسان کی اسی مقام میں ہے۔ ایک دنیا دار انسان کو ساری دنیا کی بادشاہتیں بھی حقیقی عزت عطا نہیں کرسکتیں اگر ساری دنیا کی بادشاہتیں اکٹھی ہوکر یہ فیصلہ کریں کہ فلاں شخص دنیامیں معزز ترین انسان ہے اوراسی کے مطابق(ظاہری طور پر) اس سے سلوک کریں لیکن اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں اس کے لئے پیار نہ ہو بلکہ غضب کی جھلکیاں نظرآرہی ہوں تو نہ کوئی عزت ہے اس شخص کی نہ کوئی شان ہے اس شخص کی۔ یہ مقامِ نعیم کی شان اورعزت اور احترام ہے کہ اللہ تعالیٰ کہتا ہے کہ اس کے لئے میں نے تمہیں پیدا کیا اور اس کے حصول کی تمہیں کوشش کرنی چاہئے۔
    افریقہ کے دورہ میںواقفین مبشرین کے حالات میں نے دیکھے ان سے ملا جوعزت اللہ تعالیٰ نے ان کی اس مقامِ نعیم کی وجہ سے قائم کی ہے وہ میرے مشاہدہ میں آئی لیکن کچھ وہ بھی تھے کہ جو مقامِ نعیم کو حاصل نہیں کرسکے تھے ان کو بھی میں نے دیکھا اور ان کی زندگیوںکامطالعہ کیااور ان کے کاموں پر تنقیدی نگاہ ڈالی اللہ تعالیٰ کے فضل سے ان چھ۶ ممالک کے تمام مبشر انچارج جو ہیں وہ ظاہری طورپر جو مجھے نظر آیا(دلوں کا حال تو اللہ تعالیٰ جانتا ہے اور مستقبل اور غیب کی خبرصرف اسی کو ہے لیکن جو میں نے محسوس کیا)اور جو میں نے مشاہدہ کیا وہ یہ تھا کہ اللہ تعالیٰ کا ان پر بڑا فضل ہے میں سمجھتاہوں کہ وہ بھی اس مقامِ نعیم میں رہنے والے ہیں بے نفس ،اللہ کی محبت میں مست، اس کی مخلوق کی خدمت کرنے والے اوراللہ تعالیٰ کے حکم سے اس دنیا میں بھی عزت کو پانے والے ہیں۔ نائیجیریا میں فضل الٰہی صاحب انوری ہیں۔ غانا میں کلیمؔصاحب ہیں آئیوری کوسٹ میں قریشی(محمد افضل) صاحب ہیںجن کو پنجابی میں’’بیبا مبشر‘‘ بھی کہا جاسکتا ہے بہت سادہ اور پیار ی ان کی طبیعت ہے بڑی پیار کرنے والی اور آرام سے سمجھانے والی اوراپنے آرام کو اوراپنی بہت سی ضرورتوں کودوسروں کے لئے قربان کردینے والی طبیعت ان کی۔ لائبیریا میں نئے مبلغ گئے ہیں امین اللہ سالکؔ۔ ابھی ان کے متعلق پوری طرح توکوئی فیصلہ نہیںکیا جاسکتا لیکن اس وقت تک جو کام انہوں نے کیا اس سے یہی پتہ لگا وہاں کے پریذیڈنٹ ٹب مینؔ بھی ان کو بڑی عزت اور احترام کی نگاہ سے دیکھتے ہیں سیرالیون میں ہمارے صدیق صاحب ہیں گیمبیا میں مولوی محمد شریف صاحب ہیںمیںنے محسوس کیا کہ ان سب کو اللہ تعالیٰ نے مقامِ نعیم عطاکیا ہے اور جس طرح اللہ تعالیٰ کی نگاہ میںمیں نے ان کے لئے عزت کا مقام دیکھا اسی طرح دنیا کی نگاہ میں بھی اللہ تعالیٰ نے ان کو عزت اور احترام کا مقام عطا کیا ہے۔ ہمارے سفراء ان کی تعریف کرتے تھکتے نہیں دوسرے ملکوں کے سفراء ان سے بڑے پیار سے ملتے ہیں اور پیار کے تعلقات ان کے ساتھ قائم ہیں حکومت ان سے راضی ہے عوام ان پر خوش ہیں غرض ہر لحاظ سے ان کے چہروں پر اللہ تعالیٰ کی نعمت کی شادابی ہمیںنظر آتی ہے اور ہماری جماعت کو ان کے لئے بہت دعائیں کرنی چاہئیں اللہ تعالیٰ ہمیشہ انہیں ابرار ہی میں رکھے اور ہمیشہ اپنی نعمتوں کا وارث انہیں بناتا رہے وہ ابرار کے گروہ میںہی اس دنیا سے رخصت ہوں اور ابرار کے گروہ میں ہی اس دنیا میں وہ اٹھائے جائیںلیکن بعض نہایت افسوسناک مثالیں بھی نظر آئیں۔ ایک نئے ناتجربہ کا ر مبلغ گئے ہوئے ہیں(ہم مختلف مقامات پرجاتے تھے تو وہاں کے مقامی لوگ بھی ہمارے ساتھ ہوتے تھے)ایک سفر میں ملک کی ساری جماعت کے پریذیڈنٹ اور ایک نوجوان مبلّغ ایک ہی کار میں بیٹھے ہوئے تھے ہمارے قافلے کے بھی ایک دوست اسی کار میں تھے۔ انہوںنے بتایا کہ اتنی بدتمیزی سے ہمارے مبلّغ نے اس بوڑھے مومن فدائی سے بات کی کہ میں بڑا پریشان ہوا لیکن انہوں نے اس مبلّغ سے کہا۔ دیکھو!میں پرانا احمدی ہوں، احمدیت میرے رگ وریشہ میں رچی ہوئی ہے تمہاری اس بے ہودہ بات کا مجھ پر کوئی اثر نہیں، نہ ہوسکتا ہے لیکن میں تمہیں یہ بتاتا ہوں کہ اگرتم نے نوجوانوں کے سامنے اس قسم کی بات کی تو تم اس بات کے ذمہ دار ہوگے کہ تم انہیں احمدیت سے دور لے گئے ہو ایک اور کے متعلق پتہ لگا کہ ہمارے ایک سکول کے معائنہ کے لئے اس ملک کے محکمہ تعلیم کا انسپکٹر ہمارا افریقن بھائی آیا تو ہمارے مبلّغ صاحب کہنے لگے کہ اس کے ساتھ میرا بیٹھنا میری ہتک اور بے عزتی ہے میں اس کے ساتھ نہیں بیٹھ سکتانتیجہ یہ ہوا کہ اس نے رپورٹ کی کہ یہ سکول احمدیوں سے چھین لیا جائے اور اس پر قبضہ کر لیا جائے پھر ہمارے مبلّغ انچارج ان کے پاس گئے اور ان سے پیار کی باتیں کرکے سمجھایا اور معاملہ کو رفع دفع کیا اس مبلّغ کو میں نے کہا کہ جماعت احمدیہ نے تمہیں یہاں فرعون بناکر نہیں بھجوایا ایک خادم بنا کر بھجوایا ہے اگر تم خدمت نہیں کرسکتے تو واپس چلے جائو لیکن یہ استثناء ہیں گو تکلیف دہ استثناء ہیں اور فکر پیداکرنے والے استثناء ہیں چنانچہ میں نے دعا کی اور میں نے بہت استغفار کیا کیونکہ آخری ذمہ داری بہرحال خلیفہ وقت پر آتی ہے کہ اس قسم کے مبلغوں کو میں نے وہاں بھجوایا جو خود تربیت کے محتاج تھے پھر دعائوں کے بعد اور بہت استغفار کے بعد میں اس نتیجہ پر پہنچا کہ ہمیں اپنا نظام بدلنا چاہئے اس وقت جامعہ احمدیہ سے جو نوجوان شاہد فارغ ہوتے ہیں سارے کے سارے تربیت یافتہ نہیں ہوتے۔ ایک تو جامعہ احمدیہ کو سدھارنے کی طرف توجہ کرنی چاہئے ان میں سے بعض وقف کو چھوڑ کر بھاگ جاتے ہیںاور اس وجہ سے ان کو اخراج ازجماعت بھی کرنا پڑتاہے بعض ایسے بھی ہیں جو باہر کام کرتے رہے اور ان کو جماعت سے فارغ کرنا پڑا کیونکہ ان کی کوئی تربیت نہیں تھی اخراج کے بعد جن کے اندرنیکی اور سعادت ہوتی ہے وہ توبہ کی طرف مائل ہوتے ہیں اور استغفار کے ذریعہ اللہ تعالیٰ سے معافی مانگتے ہیں بہتوں کواللہ تعالیٰ معاف کر دیتا ہے بعض ایسے بھی ہیں جو ٹوٹ جاتے ہیں لیکن یاد رکھو کہ خداتعالیٰ کو ایک انسان کیا سارے انسان بھی اس سے پھر جائیں تو کیا پرواہ ہے وہ سب انسانوں کو ہلاک کرکے ان کی جگہ ایک مخلص اور جاں نثار جماعت پیدا کرتا ہے۔ قرآنِ عظیم یہی اعلان کرتا ہے کہ لَہٗ الْمُلْکُ وَلَہٗ الْقُوَّۃُ وَالْعِزَّۃُ کوئی چیز اس کے لئے غیرممکن نہیں اور عملاً بھی دنیا میں یہ نظارے اللہ تعالیٰ کے قہر کے انسانوں نے دیکھے ہیں پس جامعہ احمدیہ میں کتابی تدریس کے علاوہ محبتِ الٰہی کی طرف بہت توجہ دینی چاہئے۔
    جن کومیں نے مقامِ نعیم پر اپنے مشاہدہ کے لحاظ سے پایا یہ وہ لوگ تھے جنہوں نے اپنے نفس کو کلیتاً اپنے رب کے لئے قربان کردیا تھا اور وہ اپنی عاجزی کا ہروقت اقرار کرتے رہتے ہیں اور وہ جانتے ہیں کہ ہر عزت اور ہر طاقت اور ہر اثر اللہ تعالیٰ کی طرف سے ملتا ہے جس طرح سپین کے ہمارے ایک بادشاہ نے اپنے محل میں رہائش اختیار کرنے سے پہلے ہزاروں جگہ یہ لکھوایا اور زیادہ تو اس کے دماغ میں یہی فقرہ آیا وہی لکھا ہوا ہے’’لَا غَالِبَ اِلاَّ اللّٰہ‘‘ کہ اللہ تعالیٰ کے سوا کسی کو غلبہ حاصل نہیں لیکن اس کے علاوہ’’اَلْمُلْکُ لِلّٰہِ‘‘۔’’اَلْقُدْرَۃُ لِلّٰہِ‘‘ ’’اَلْعِزَّۃُ لِلّٰہِ‘‘ کو اس نے کثرت سے لکھوایا یہ بڑی لمبی تفصیل ہے اس وقت میں اس تفصیل میں نہیں جائوں گا اور جب یہ محل اللہ تعالیٰ کی حمد کے کلمات سے اس طرح حسین بن گیا تب اس نے وہاں رہائش رکھی چنانچہ ہمارے یہ ابرار مبشر (اللہ تعالیٰ انہیں جزادے او راستقامت عطاکرے)یہ وہ لوگ ہیں جنہیں علم ہے کہ غلبہ اور اقتدار اور قدرت اور عزت سب اللہ کی ہے اور حقیقی معنی میں اسی سے ملتی ہے۔ بے نفس ہوکر وہ اللہ تعالیٰ کی طرف رجوع کرتے اور انتہائی پیار کے ساتھ اللہ تعالیٰ ان کی طرف رجوع کرتا ہے پھر وہ غریب جنہیں پیٹ بھر کر شاید کھانا بھی نہ ملتا ہو، خدا کی خاطر غربت کی زندگی گزار رہے ہیں۔ سات ہزار میل اپنے رشتہ داروں سے دور لیکن ایسی زندگی کہ’’مِنْ حَبْلِ الْوَرِیْد‘‘ سے بھی جو زیادہ قریب ہے اس کا احساس رکھتے ہیں اور جو دوریاں ہیں وہ سب بھول چکے ہیں رشتہ داروں سے دوری، ملک سے دوری، اپنے معاشرہ کے حالات سے دوری، ہزار قسم کی دوریاں ہیں جن کا انہیں سامنا ہے انہوں نے کسی کی پرواہ نہیں کی جب انہوں نے خدا کے لئے ’’ بُعد‘‘کی قربانی بھی دی تو اللہ تعالیٰ نے انہیں قرب سے نوازا یہ اس کی شان ہے لیکن اگر ایک شخص بھی ایساہو جیسا کہ میں نے مثالیں دی ہیں تو جماعت کی بدنامی کا موجب،ہماری رسوائی کا باعث اوربڑی قابل شرم بات ہے۔
    جامعہ احمدیہ میں بے نفس زندگی گزارنے کا سبق دینا ضروری ہے یہی اسلام کی روح ہے اور یہی حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ انسان اپنے وجود کو بکرے کی طرح اللہ تعالیٰ کے حضور رکھ دے کہ چھری پھیرے جس طرح چاہے جب تک یہ روح نہیں پیدا ہوتی ہمارا مبشر’’مبشر‘‘نہیں اگر محض چند دلائل سکھا کر ہم نے وہاں تبلیغ کرنی ہو تو بہت سے عیسائی بھی تیار ہوجائیںگے کہ چند دلائل سکھا دوہم تمہاری تبلیغ کرتے ہیں جو بھوکا مرتا ہے وہ تنخواہ کے ساتھ یہ کام کرنا شروع کردے گا لیکن ہمیں ایسے مبلّغ کی ضرورت نہیں ہمیں تو اس مبلّغ کی ضرورت ہے جس کا نفس باقی نہ رہے اور اللہ تعالیٰ سے قدرت کوپانے والااور عزت کو پانے والا اوراثر ورسوخ کو پانے والا ہو غلبہ ہو اس کا لیکن وہ غلبہ وہ احترام اللہ تعالیٰ کا عطاکردہ ہو۔ غلبہ تو یہ ہے کہ جو Head of the states (ہیڈ آف دی سٹیٹس)ہیں وہ بھی بڑی قدر کی نگاہ سے ان لوگوں کو دیکھتے ہیں۔ ان بے نفس، اللہ کے پیارے بندوںکے کاموں کا نتیجہ تھا کہ نائیجیریاکے ہیڈآف دی سٹیٹ کو جب میں ملنے گیا تو نوجوان جرنیل جس نے امریکہ کے مقابلہ میں سول وار(Civil war)جیتی تھی ابھی ابھی میرے جانے سے کچھ عرصہ پہلے جیتی تھی بظاہر دنیوی لحاظ سے اس کو بڑا مغرور ہونا چاہئے تھالیکن میں جو اس کیلئے بالکل انجان تھا میں مسلمان تھا اور وہ عیسائی ، اس کے باوجود اسکے ذہن پرہمارے کام کا اتنااثر تھا کہ وہ مجھے کہنے لگا کہ اس ملک کی ترقی کے جو منصوبے ہیں اور جو کوششیں ہیں ان میں ہم اور آپ برابر کے شریک ہیں۔ میں سمجھتا ہوں کہ جماعت احمدیہ کے کاموں کی اس سے بڑھکر اورکوئی تعریف نہیں ہوسکتی ایک غیر ملک کے سربراہ کو ان حالات میں کہ امریکہ کو اس نے شکست دی تھی اور اسے جائز فخر تھا مجھے کہنے لگا کہ ان غیر ملکی حکومتوں اور غیر ملکی عیسائی مشنزنے اپنا پورا زور لگا یا کہ ہمارے ملک کو تباہ کردیںاللہ تعالیٰ نے محض اپنے فضل سے ہمیں بچالیا۔ یہ اس کافقرہ تھا اس نے عیسائی مشن پر تنقید کی اور ہمارے متعلق یہ کہا کہ ہم اور آپ ملک کی Progress (پروگریس) میں، ملک کی ترقی کی جدوجہد اور کوشش میں Partner (پارٹنر) ہیں برابر کے شریک ہیں۔ یہ تأثر اس قسم کے دماغوں پر محض اس وجہ سے ہے کہ ہمارے مبلّغوں کی بڑی بھاری اکثریت کا اور Missions (مشنز) کے انچارج جو ہیں ان کا نفس باقی نہیں رہا انہوں نے سب کچھ اللہ کے حضور پیش کردیااور پھر سب کچھ اس سے وصول بھی کرلیا غیر ملکی حاکم جب دوسرے ملک میں داخل ہوتا ہے تو سب کچھ لے جاتا ہے دیتا کچھ نہیں اِنَّ الْمُلُوْکَ اِذَا دَخَلُوْا قَرْیَۃً اَفْسَدُوْھَا(النمل:۳۵)لیکن ہمارا پیارا رب ہمارا ربِّ کریم جب سب کچھ لے لیتا ہے تو جتنا لیتا ہے اس کے مقابلہ میں(دینے والے نے گو سب کچھ دیا مگراتنی سی چیزتھی اللہ تعالیٰ کی عطا کے مقابلہ میںاور اس اتنی سی چیز کو لے کر)اس نے اپنا سب کچھ اسے دے دیا اور اس نے کہا جو میرا ہے وہ سب کچھ تمہارا ہے اور پھراپنی قدرت کے مظاہرے ان کی زندگی میں ان کودکھاتا ہے۔ ایک احمدی کی زبان تو اللہ تعالیٰ کی حمد کرتے تھکنی نہیں چاہئے ہر وقت زبان پر حمد رہنی چاہئے ہر احمدی کو بحیثیت احمدی اجتماعی طورپر بھی اور جماعتی رنگ میں بھی اسے اللہ تعالیٰ کی حمد کرنی چاہئے کہ جماعت پر اس نے کتنے فضل کئے ہیں۔ اب اتنے بے نفس لوگوں میں چند نفس پرست بھی ہوں تو بڑی نمایاں ہوجاتی ہے ان کی بدی کہ ایک طرف وہ ہے کہ جس کا نفس باقی نہیں اورایک طرف وہ ہے کہ جس نے نفس کا کوئی حصہ بھی اللہ کی راہ میں قربان نہیںکیا اورایک انسان جس کے کان میں محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی یہ آواز پہنچی تھی کہ’’اِنَّمَآ اَنَابَشَرٌمِّثْلُکُمْ‘‘ (الکہف:۱۱۱) کہ میں تمہارے جیسا انسان ہوں۔اس کے کان میں ہمارے مبلغ کی یہ آواز پہنچی کہ تم اتنے ذلیل ہو کہ اگر میں تمہارے ساتھ بیٹھوں تومیری بے عزتی ہوجائے پس حقیقتاً ایسا ذہن جو ہے وہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا باغی ہے کہ آپ کی آواز توایک افریقن کے کان میں یہ پہنچتی ہے کہ میں تمہارے جیسا انسان ہوںاور تم میرے جیسے انسان ہو لیکن ایک مبلغ منسوب تو ہوتا ہے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف اور کہتا یہ ہے کہ تمہارے ساتھ میرا بیٹھنا بھی میری بے عزتی ہے یہ خالص شیطانی فقرہ ہے جو فرعون کے منہ سے تو نکل سکتا ہے لیکن ایک شریف انسان کے منہ سے بھی نہیں نکل سکتا کجایہ کہ احمدی مبلغ کے منہ سے نکلے!
    پس جامعہ احمدیہ کواپنی فکر کرنی چاہئے جامعہ احمدیہ میں(مجھے رپورٹ ملی ہے میں نے تحقیق ابھی نہیں کی کہ) بعض ایسے اساتذہ بھی ہیں جنہوں نے اپنی کلاس میںیہ کہا کہ حضرت مصلح موعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے جو تفسیر کی ہے وہ غلط ہے اور میں تمہیں صحیح تفسیر بتاتاہوں ایسا استاد جامعہ احمدیہ کی کیسے تربیت کر سکتا ہے؟ پھر تو وہ اس شخص کے خلاف بھی بغاوت کریں گے، خدا کے خلاف بھی بغاوت کریں گے کیونکہ بغاوت کا سبق ان کو جامعہ احمدیہ میں دیا گیا ہے خدا کو نہ ایسے استاد کی ضرورت ہے اور نہ ایسے شاگرد کی ضرورت ہے پس جامعہ احمدیہ کواپنی فکر کرنی چاہئے اور جماعت کو جامعہ احمدیہ کی فکر کرنی چاہئے پھر جب فارغ ہوجاتے ہیں تو بعض توہماری غلطیاں ہیں اس حقیقت کو ہمیں تسلیم کرنا چاہئے۔ایک نیا نیا نوجوان فارغ ہوتا ہے ہم اسے باہر بھیج دیتے ہیں اس کی نہ کوئی تربیت کی نہ ہم نے اس کے ذہن کو Polish (پالش) کیا وہ باہرجاکر غلطیاں کرے گا ہم بھی اس کے ذمہ دار ہیں کیونکہ اس وقت تک دستور یہ رہا ہے کہ اگر جامعہ احمدیہ سے آٹھ شاہد کامیاب ہوئے چار تحریک جدید میں چلے گئے اور چار چلے گئے صدر انجمن احمدیہ میں جو صدر انجمن احمدیہ کے حصے میں آئے ان کو یہیں خدمت کاموقع ملتا ہے اور جوتحریک میں گئے تحریک ان کو یہاں تو نہیں رکھ سکتی وہ انہیں باہر بھیج دیتی ہے۔ ابھی تک ہم نے اس کو پوری طرحPolish(پالش) نہیں کیا اس کی پوری تربیت نہیںکی اس کے پورے حالات نہیں معلوم کہ وہ کیسا کام کر سکتا ہے؟ اس کو ہم ایک ابتلا میں ڈال دیتے ہیں اس حد تک ہماری ذمہ داری ہے جس حد تک کہ اسنے اپنے مقام کو نہیں پہچانا یہ اس کی ذمہ داری ہے۔ انسان کا مقام تو دراصل عاجزی کامقام ہے سر کامقام زمین ہے بلندی نہیں جسم کے اوپر لگا ہوا ہے لیکن ہے اس کا مقام پائوں پر۔لائبیریاکے پریذیڈنٹ ٹب مینؔ نے ہماری دعوت کی۔ ان کے محل میںجوکھانے کاکمرہ ہے اس کی چھت شیشوں کی ہے جس میں آدمی نظر آتا ہے لیکن چھت پر اگر شیشہ ہوتو دیکھنے سے سر نیچے نظر آئے گا اور پائوں اوپر نظر آئیںگے وہاں جاکر بیٹھتے ہی میں نے انہیں کہا کہ میں آپ کے اس کمرے میں آکر بہت خوش ہوا ہوں کیونکہ یہاں جو انسان آتا ہے اس کو پتہ لگ جا تا ہے کہ اس کے سر کا اصل مقام کونسا ہے وہ اس سے بہت محظوظ ہوئے اگرچہ اس کی عمر تراسی سال ہے مگر وہ بڑا بیدار مغز انسان ہے اور وہ اپنی قوم کے لئے باپ کی طرح ہے۔ میں نے اس میں یہ بڑی خوبی دیکھی ہے کسی سے بھی آپ بات کریں وہ اسے باپ سمجھے گا اور باپ ہی کہے گا۔ اس نے اپنے ملک کی ۱۹۴۴ء سے اس وقت تک بڑی خدمت کی ہے۔
    ان کا دستو ر ہے کہ کھانے کے بعدکھڑے ہو کر چھوٹی سی تقریر کرتے ہیں میں نے بھی کی۔ وہ کھڑے ہوکر کہنے لگے کہ ہوں تومیںعیسائی لیکن میں خدائے واحد ویگانہ پر ایمان رکھتاہوں اور سارے مذاہب میرے لئے برابر ہیں۔ میں بحیثیت پریذیڈنٹ مذہب مذہب میں تفریق نہیں کرسکتا اور پھر میں نے کہا کہ میں تمہیں یہ بتاتا ہوں کہ ہم بڑے خوش قسمت ہیں کہ اس وقت روحانیت کا ایک بادشاہ ہمارے درمیان موجود ہے۔یہ تواللہ تعالیٰ نے ان سے کہلوایا میں تو ایک عاجز اور ناکارہ انسان ہوں لیکن اللہ تعالیٰ جب فضل کرنا چاہتا ہے تو ایک ناکارہ ذرہ کوبھی ایک مقام دے دیتا ہے عزت کا اور وہ(ٹب مین)بہت خوش تھے اور لوگوں کو کہا کہ یہ بابرکت وجود ہے ان کے وجود سے امید ہے ہمارے ملک کو برکت ملے گی۔ یہ کلمات اس کے منہ سے نکلے یہ تواللہ تعالیٰ کی دین ہے ہمارے دل میں کبھی ایسی خواہش ہی نہیں پیدا ہوئی۔ ہمیں دنیا نے کیا دینا ہے دنیا کے سب سربراہ مل کر بھی مہدی معہود علیہ السلام کے نائب اور خلیفہ کو وہ عزت نہیں دے سکتے جو اسے پہلے سے ہی خداتعالیٰ کی نگاہ میں حاصل ہے لیکن اللہ تعالیٰ کا فضل دیکھ کر کہ ایک عیسائی ہے غیر ملکی ہے اس سے زیادہ لمبی چوڑی واقفیت بھی نہیں ہے اور جوکلمات اس کے منہ سے نکلے وہ کسی کتاب میں تو اس نے نہیں پڑھے وہ توفرشتوں نے اس کے دل میں القا کئے اور اسکی زبان نے ان کو ظاہر کردیا۔ اس قسم کی عزت تو ہمارے بے نفس مبلّغ جووہاں ہیں ان کوبھی مل رہی ہے لیکن جس نوجوان کو یہ سبق ملے گا کہ حضرت مصلح موعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے تفسیر میں غلطیاں کیں اور آئو اب ہم ان کو درست کریں اس نے کیا خدمت کرنی ہے جاکر۔ وہ تو قطع ہو گیا ٹوٹ گیا۔ یہ فقرہ سننے کے بعد تو اس کے پرخچے اڑگئے۔ اب میں ایک نئی تنظیم کا اعلان کرنے لگاہوں میں نے بہت سوچا بہت دعائیں کیں میں اللہ تعالیٰ کی طرف عاجزانہ جھکا تو میں اس نتیجہ پر پہنچا ہوں کہ ہمیں اپنا پرانا طریق بدل دینا چاہئے اوریہ چیز پہلے مبلّغین پر بھی حاوی ہوجائے گی اورنئے آنے والوں پر بھی کہ نہ کوئی تحریک کا ہوگا نہ کوئی انجمن کا ہوگا تمام واقفین کا ایک خاص گروہ بن جائے گا ایک جماعت ایک Pool (پُول) ہوگا۔ ایک Reservior(ریزروائیر) ہوگا ایک تالاب ہوگا جس میں یہ روحانی مچھلیاں اجتماعی زندگی گزاریں گی اور تربیت حاصل کریں گی اورنشوونما پائیں گی نئے اور پرانے اس پول میں چلے جائیںگے جو پرانے ہیں ایک سال کے اندر ہم ان کی Screen(سکرین) کریں گے یعنی بصیغہ راز ان کے تمام حالات، ان کی ذہنیت وغیرہ وغیرہ معلوم کریں گے یہ ضروری نہیں کہ کسی میں کوئی نقص ہو اس کی وجہ سے اس کو باہر نہ بھیجا جائے۔ یہ بھی ہوسکتا ہے کہ اس کے حالات یااس کی ذہنیت ایسی ہو کہ وہ یہاں بہت اچھا کام کرسکتا ہو باہر نہ کرسکتا ہو۔ یہ سارے کوائف ہم اکٹھے کریں گے اور اسی طرح مثلاًآٹھ جومیں نے پہلے مثال دی تھی کہ جامعہ سے جو نئے فارغ ہوئے ہیں ان نئے فارغ ہونے والوں کو اس پول میں بھیج دیا جائے گا نہ کوئی تحریک کے پاس جائے گا نہ انجمن کے پاس لیکن تعداد دونوں کی مقرر ہوجائے گی مثلاً پہلے ساٹھ مبلّغ ہیںاس سال آٹھ نئے مبلّغ پیدا ہوئے ہیں تو چار ان کے حصہ میں آئیںگے تو یہ ہوجائے گا کہ پہلے تحریک جدید کے ساٹھ تھے اب چونسٹھ ہوگئے اور اگرپہلے اسی مبلّغ ہیں صدر انجمن احمدیہ کے اب ان کو چارملے تو چوراسی۸۴ ہوگئے لیکن وہ کون کون ہوں گے اس کا فیصلہ نہیں کیا جائے گا وہ پُول کے ہوں گے اور وہیں سے وہ باہر جائیں گے اور کوئی شخص باہر نہیں جائے گا جب تک کم ازکم تین سال تک اس نے پاکستان میں کام نہ کیا ہوا ور اس کے حالات اور اس کی ذہنیت کا ہمیں علم نہ ہو۔ اورپہلوں کی Screening(سکریننگ) تو اسی سال ہوگی اور نئے آنے والوں کی سکریننگ تین سال کے بعد ہوگی اور پھر ان میںسے Ear mark (ایرمارک) معین کردیئے جائیں گے یعنی نشان دہی ہوجائے گی کہ یہ یہ مبلّغ ایسے ہیں جو بیرونی ممالک میں کام کرنے کے قابل ہیں پھر جتنے ان کے حصے کے ہیں اتنے ان میں سے باہر بھیج دئیے جائیں گے۔ ایک اور خرابی یہاں پیدا ہوتی تھی کہ جب وہ واپس آتے تھے تو ان کاکوئی کام نہ ہوتا باہر وہ مبلّغ انچارج ہے اللہ تعالیٰ نے اسے ایک مقام دیا ہے اور عزت دی ہے لیکن یہاں اسے کوئی کام نہیں ہوتا دفتر میںکلرک لگادئیے جاتے ہیں وہ بے نفس تھے پرواہ نہیں کرتے تھے کلرکی کرتے تھے لیکن اس لحاظ سے ان کی طبیعت پر بہر حال اثر پڑتا تھاان کو کسی علمی کام میں لگایا جاتا، تبلیغ کے میدان میں رکھاجاتا، نئی کتابیں پڑھائی جاتیں، تحقیق کروائی جاتی یہ ان کاکام تھا لیکن چونکہ اس قسم کا تحریک کے پاس کام نہیں ہوتا اس واسطے ان سے وہ ایسے کام کروانے پر مجبور ہوتے تھے اس میں ان کاکوئی قصور نہیں پھر سوال یہ ہے کہ ان کو تین سال یہاں کیوں رکھا جائے۔پہلے بھی کچھ باتیں میں نے محسوس کی تھیں اب میں نے ان کو حکم دیا ہے کہ کسی شخص کو تین سال سے زیادہ باہر نہیں رکھنا وہ یہاں آئے جو ہمارے پرانے مبلّغ تھے دس دس پندرہ پندرہ سال باہر رہے ان کے لئے عملاً بعض الجھنیں پیدا ہوگئیں مثلاًایک جرمنی کا مبلّغ ہے وہ پانچ سال کا بچہ وہاں لیکرگیا اگر وہ بارہ سال سے وہاںہے تو سترہ سال کی عمر کا وہ بچہ ہوگیا ساری ابتدائی تعلیم اس نے جرمن زبان میں حاصل کی اب وہ یہاں آئے تو اس کی تعلیم کا حرج ہوتا ہے وہاں رہے تو اس کے ایمان کو نقصان پہنچتا ہے اس لئے عجیب کشمکش پیدا ہوگئی ۔ میں نے تو ان کو یہی کہا ہے اپنے ایمانوں کی حفاظت کرو اللہ تعالیٰ تمہارے بچوں پرفضل کرے گالیکن ان کے خاندانی حالات میں ایک پیچیدگی ضرور پیدا ہوئی۔
    اگر ہم تین سال کے لئے باہر بھیجیں تو میں اپنی بہنوں کو یہ سنانا چاہتا ہوں کہ اگر ایک عیسائی لڑکی نوجوان اپنے بال کٹوا کر ساری عمر کے لئے Catholic nun(کیتھولک نن) بنتی ہے اور تثلیث کے ساتھ یہ عہد کرتی ہے کہ میں تثلیث کی خدمت کے لئے کنواری رہوں گی تو کیا آپ بہنیںتوحید کی خدمت کے لئے تین سال تک کے لئے اپنے خاوندوں سے علیحدہ نہیں رہ سکتیں؟ اگرآپ اتنا بھی نمونہ قربانی کا پیش نہیں کرسکتیں تو میں سمجھتا ہوں کہ یہ بڑی جائز وجہ ہوگی کہ آپ اپنے خاوندوں سے خلع لے لیں یہ آپ کیلئے بھی بہتر ہے اور ان کے لئے بھی بہتر ہے اورہمارے لئے بھی بہتر ہے لیکن اگر آپ کے دل میں اللہ کی محبت اور پیار ہے تو اس قربانی کے لئے جو عیسائی ننوں(nuns) کی قربانی کے مقابلہ میں بالکل حقیر ہے تیار ہوجائیں۔
    پس ہمیں اپنے مبلّغوں کو تین سال سے زیادہ عرصہ تک باہر نہیں رکھنا چاہئے چاہے ہم انہیں چھ مہینہ کے لئے بلائیں پہلے چونکہ آمدورفت کے لئے پیسے کم تھے جب خاندان بچوں سمیت باہر چلے جاتے تھے خرچ زیادہ ہوتا تھا تو تحریک کے لئے مجبوری تھی یعنی پہلا جو قانون تھا وہ مجبوراً جاری کیاگیا تھاکہ مبلّغ کے ساتھ ان کے بیوی بچوں کو بھی بھیج دو۔ دس دس پندرہ پندرہ سال وہاں رہیں گے اب تجربہ کے بعد ہمیں پتہ لگا کہ یہ درست نہیںہے سوائے اس مبشر کے کہ جس کے ساتھ بیوی کا جانا جماعتی کام کیلئے ضروری ہے باقیوں کو قربانی دینی چاہئے۔ دوتین سال کے بعد واپس آجائیںگے۔ بہت سے معصوم احمدی ناجائز طور پر پانچ پانچ سال کی قید کی سزا بھی بھگتے ہیں کئی ایک کا مجھے بھی علم ہے بالکل بے گناہ لیکن جھوٹی گواہیوں پر پانچ پانچ سال کی قید کی سزا ان کو مل گئی کیا اس قیدی کی بیوی اپنے خاوند سے پانچ سال علیحدہ نہیں رہتی؟ تو کیا تم اپنے رب کے عاشق کی جدائی تین سال برداشت نہیں کرسکتیں؟ اوروہ علیحدہ رہتی ہے تواسے کوئی ثواب نہیں ملتا اور اگر تم علیحدہ رہو گی تو تمہیں ثواب ملے گا وہ علیحدہ رہتی ہے تو اکثر اسکی دیکھ بھال کرنے والا کوئی نہیں ہوتا اور تمہاری دیکھ بھال کرنے والے موجود ہیں اللہ تعالیٰ کا تم پرفضل ہے۔
    یہ صحیح ہے کہ آپ بہنیں بعض دفعہ اپنے حقوق سے زیادہ کا مطالبہ کرنے لگ جاتی ہیں دنیاکی حرص میں اور آپکی وہ بات نہیں مانی جاتی تو پھر آپ کے دل میں شکوہ پیدا ہوتا ہے لیکن اگر دنیا کی حرص نہ ہو اور صرف جائز حقوق ہوں تو جائز حقوق کی حفاظت کی ذمّہ داری جماعت اورمہدی معہود کے خلیفہ کی ہے لیکن یہ فیصلہ کرنا بہرحال نظام کا کام ہے اور خلیفہ وقت کا کام ہے آپ کو اس دنیا میں بھی بہت سی سہولتیں مل جاتی ہیں کئی ہماری بہنیں وہاں جاکر اپنے خاوندوں کو پریشان کرتی ہیں کیونکہ دنیاکی حرص ان میں ہوتی ہے ان کی پوری تربیت نہیں ہوئی ہوتی اور عجیب کشمکش پیدا ہوجاتی ہے ایک مبلّغ اور اسکی بیوی کے درمیان وہ بے نفس زندگی گزارنا چاہتا ہے اور یہ ایسی کہ اسکانفس موٹا اور دنیا کی لالچ اور حرص۔ اس پر گھر میں جھگڑا رہتا ہے اسلئے وہ اپنا کام پورا نہیں کرسکتا لیکن بہت سی بیویاں اللہ تعالیٰ کی فدائی ، بے نفس ایسی دیکھی ہیں کہ ہروقت ان کیلئے دعائیں کرنے کو دل چاہتا ہے۔ کلیمؔصاحب کی اَن پڑھ بیوی ان کے ساتھ گئی تھی ان کو باہر گئے ہوئے بڑا لمبا عرصہ ہوگیا ہے انشاء اللہ اب وہ جلد واپس آرہے ہیں۔ ان کی بیوی نے منصورہ بیگم کوبتایا وہ کہنے لگی کہ جب میں یہاں آئی تو میرے دل میں یہ احساس پیدا ہوا کہ نہ مجھے انگریزی آئے نہ کوئی اورزبان آئے، اردو تھوڑی بہت آتی ہے وہ بھی زیادہ نہیں آتی اور میں ایک مبلغ انچارج کی بیوی بن کر یہاں آئی ہوں مگر کوئی خدمت نہیں کرسکتی دعاکرتی رہی تو اللہ تعالیٰ نے میرے دل میں یہ ڈالا کہ تم انگریزی سیکھنے کی بجائے ان کی مقامی زبا ن سیکھ لو پھر انہوں نے بڑی محنت سے وہاں سالٹ پانڈ کی مقامی زبان سیکھ لی اوربڑی اچھی زبان بولتی تھیں اللہ تعالیٰ نے ان کی اس خواہش اور آرزو کو پورا کیا۔ ایسی خواہشیں مقامِ نعیم کی طرف لے جانے والی ہیں ان کو توفیق ملی کہ انہوں نے سینکڑوں افریقن احمدی بچوں کو قرآن کریم پڑھایا اور اس کا ترجمہ سکھایا کیونکہ ان کی زبان میں بڑی روانی سے بات کرتی تھیں پس ایسی بھی ہیں لیکن بعض دوسری قسم کی بھی ہیں جیسے بعض استثناء مبلّغوں کے ہیں یہ استثناء ہیں اکثریت ایسی نہیں۔ جوگندی مثالیں ہیں وہ بالکل استثنائی ہیں لیکن ہم ایک زندہ جماعت ہیں اور ایک زندہ جماعت میں ایک مثال بھی ایسی ہوتو اسکو برداشت نہیں کرسکتی حالانکہ برداشت کرنا چاہئے ورنہ آہستہ آہستہ زنگ بڑھتا چلا جاتا ہے اور زندگی کے بجائے موت کے آثار پیدا ہو جاتے ہیں مثلاًچھ ملکوں میں ہمارے درجنوں مبلّغ ماشاء اللہ صرف دو کے متعلق مجھے معلوم ہوا ہے کہ اس قسم کے ہیں، وہ ہیں بھی نوجوان اورپھر غیر تربیت یافتہ۔ غلطی کی کہ فوراً ان کو باہر بھجوا دیا اسی طرح ہماری مستورات ہیں وہاں ان کا بے حد اثر ورسوخ ہے، وہ بڑی خدمت کررہی ہیں، وہ ایک قسم کی مبلّغ اور مبشرہ ہیں اللہ تعالیٰ انہیں بھی جزائے خیر دے اور اپنے خاوندوں کے ساتھ ان کو بھی مقامِ نعیم میں رکھے لیکن عورتوں میں بھی استثناء ہیں۔ ہماری جوبہن ایسی ہوگی یعنی مبلّغ کی بیوی جسے ہم سمجھیںگے کہ اس کو ساتھ جانا چاہئے اس کے لئے شرط لگائیں گے کہ چھ مہینے وہاں کی زبان سیکھے کیونکہ انگریزی کی نسبت وہاں کی مقامی زبان کا جاننا بہت ضروری ہے متعدد مقامات پر یہ ہوا کہ مبلّغ نے کہا کہ آپ کے سامنے بارہ ہزار آدمی بیٹھا ہوا ہے( ان کا محتاط اندازہغلط تھا میں نے حساب لگایا تو بیس ہزار سے زیادہ سالڈپانڈ میں ہمارے احمدی مردوزن جمع تھے) وہ کہتے تھے کہ ان میں سے صرف دس فیصدی انگریزی جانتے ہیں اسلئے ترجمہ ہوگا یہ نہیں کہ کھڑا ہوکر میں انگریزی میں بات کروں اور صرف ایک زبان میں خطبہ ہوجائے۔ لیسٹر کی مسجد کے افتتاح اور خطبہ جمعہ کے موقعہ پر دومترجم رکھنے پڑے، ایک کریول زبان میں ترجمہ کرتے تھے(یہ عیسائیوں کی زبا ن ہے جس میں کچھ انگریزی کے لفظ صحیح شکل میں اور کچھ بگڑے ہوئے، کچھ دوسری زبانوں کے ملے جلے ہیں وہ زبان ایک عجیب مرغوبہ ساہے) ایک اور زبان تھی ان کی جو باہر سے آئے ہوئے تھے مجھے کہا کہ نصف لوگ یہ زبان سمجھیں گے اور نصف وہ زبان سمجھیں گے اس لئے دو متر جم کھڑے تھے ۔ مجھے بڑی مشکل پڑ گئی میں ایک فقرہ کہتاتھااس کا پہلے ایک زبان میں ترجمہ ہوتا پھر دوسری زبا ن میں ترجمہ ہوتا پھر میری با ری آتی تھی ۔ میں تو ذہن پر بڑا بوجھ ڈال کر تسلسل قا ئم رکھنے کی کو شش کرتا تھاایک اور جگہ وہ کہنے لگے کہ صر ف پانچ چھ فیصدی انگر یزی سمجھیںگے باقی جوہیں قریباً نصف نصف، ایک نصف حصہ ٹمنی زبان جانتا ہے اور دوسرا نصف حصہ مینڈے زبان جانتا ہے میرے ساتھ دومترجم کھڑے کردئیے یہ کام اسی طرح ہوا:-
    پس یہاں سے جو ہماری بہن خدمت کے جذبہ سے جانا چاہے اور ہم بھی اس کو بھیجنا چاہیں تو اس کے لئے پانچ چھ مہینے زبان سیکھنے کا انتظام کریں گے ایک اور سکیم ہے میں کسی اور وقت جماعت کو بتائوںگایہاں ان کو مقامی زبان کے کئی سَو فقرے ہم یادکروادیں گے اوروہ وہاں جاکر دوچارمہینے میں بڑی جلدی روانی کیساتھ بولنے لگ جائیں گی پس بعض مقامات پر بعض حالات میں ہمیں مبلّغوں کی بیویاں بھی بھیجنی پڑیں گی لیکن جماعتی مفا دجہاں ہوگا وہاں انہیں بھیجیں گے جہاں جماعتی مفاد نہیں ہوگا وہاں ہماری احمدی بہن کو اور ایک مبشر کی بیوی کو اور اس کے بچوں کو یہ قربانی دینی پڑے گی کہ تین سال تک اس سے جدا رہیں۔ اب تو میں بڑی سختی کے ساتھ تین سالہ پابندی کروارہا ہوں پھر یہاں جو آتے ہیں ضروری نہیں کہ ہم تین سال تک ان کو یہاں رکھیں چھ مہینے یا سال یا تین سال ہم یہاں رکھیںگے یا ممکن ہے وہ دوبارہ جائیں ہی نہ کیونکہ وہ توPool(پُول) کے ہوں گے پو ل میں سے اگر ساٹھ مبلّغ تحریک کے ہیں تو تحریک پو ل میں سے چنیدہ اور سکریننگ کے بعد، تربیت کرنے کے بعد، ریفریشر کورس کے بعد ان کو باہر بھیجے گی اور جو باقی ہیں ان کی بھی یہاں سکریننگ کے بعد نظارت اصلاح وارشاد کو دیں گے اور باقیوں میں سے ممکن ہے پانچ دس ایسے ہوں کہ ہم ان کو کہیں تم ربوہ میں رہو اور ریفریشر کورس کرو یا تو اپنی تربیت کرلو کوشش اور دعا کے ساتھ اور یا پھر ہم تمہیں فارغ کردیں گے غرض ہم نے خانہ پری نہیں کرنی کیاخانہ پری سے اللہ تعالیٰ ہم سے خوش ہوگا؟ اللہ تعالیٰ ہم سے یہ چاہتا ہے کہ ہم زیادہ سے زیادہ مخلصین اس کی راہ میں قربان کریں اللہ تعالیٰ اس بات سے خوش نہیں ہوسکتا کہ چند سو غیر مخلص بدنیت اس کے حضور پیش کردو جس طرح بعض لوگ قربانی کرتے وقت جوسب سے لاغر بکرا ہوتا ہے اسکی قربانی کر دیتے ہیں یا بعض لوگ انسانوں کا جسم جو تمام اجسام سے زیادہ اچھا ہے خدا کی نگاہ میں اور فائن بھی زیادہ ہے اس کے گوشت کی بناوٹ جا نور جیسی نہیں جانور کے گوشت کو انسانی جسم تحلیل کرتا ہے اور اپنے مطلب کی چیز لے لیتا ہے اور جو اسکے جسم سے مناسبت نہیں رکھتا اسے باہر نکال دیتا ہے فُضلے کے ذریعہ سے۔
    ایک دفعہ میں لاہور جا رہا تھا کہ لاہور سے دس بارہ میل ورے مجھے بیل اور گائیں لاہور کی طرف جاتی ہوئی نظر آئیں۔ میں موٹر میں تھا اور ان کی ہڈیا ں نکلی ہو ئیں اورگوشت غائب، صرف چمڑا اور ہڈیاں نظر آرہی تھیں ان کی شکل میں نے دیکھی میں نے کہا کہ یہ جارہے ہیں مذبحہ خانے، انسانوں کی غذابنیںگے۔ ہماری کار نے جب ہارن بجایا تو ان میں سے ایک اسی طرح کا نیم مردہ بیل ہارن کی آواز سن کر اور ڈرکر دوڑپڑا اور وہ تیس گزہی دوڑا ہوگا کہ اس کی حرکت قلب بند ہوگی اور مر گیا۔ یہ توانسان کی مناسب غذا نہیں۔
    پس انسان کو بہترین، اشرف المخلوقات بنایا ہے اللہ تعالیٰ نے اور اشرف ہی اس کو بننا چاہئے۔ جسمانی قویٰ کے لحاظ سے بھی اورروحانی تربیت کے لحاظ سے بھی پس بااخلاق اور روحانی انسان بناکر مبلغوں کو باہر بھیجنا چاہئے وہاں مبلغوں میں سے اس کا اثر ہے جو دعاکرنے والا اور بے نفس ہے اور اس کا اثر ہونا چاہئے۔ جب ہم نے خدا کی طرف بلانا ہے توجو خدا سے دور ہوگا وہ خدا کی طرف کیسے بلائے گا؟ خدا کی طرف تو وہی بلا سکتا ہے جو خداتعالیٰ کا مقر ب ہوگا، جس کو اس کا قرب حاصل ہوگا جس کو خود اس کا قرب حاصل نہیں وہ دوسرے کو قرب کی راہیں کیسے دکھا سکتا ہے تو مبلغ کے لئے بنیادی چیز یہ ہے کہ وہ بے نفس ہو، غرور اور تکبر اس میں نہ ہواوراللہ تعالیٰ سے اس کا زندہ تعلق ہو اور یہ قومیں خصوصاً افریقہ کی پیارکی اتنی بھوکی ہیں اور اتنی پیاسی ہیں کہ آپ اس کا اندازہ نہیںکرسکتے۔ زمبیا کے ایک وزیر لندن کے ایروڈرام پر اتفاقاً مل گئے تھے جب ہم واپس آرہے تھے ان کا ہائی کمشنر بھی ان کے ساتھ تھا اور ایک دس بارہ سال کا بچہ بھی ساتھ تھا۔ میں نے اس کو گلے لگالیا اور پیار کیا اس کا اتنا اثر ہوا زمبیا کے وزیر اورہائی کمشنر پر کہ وہ میرا شکریہ ادا کررہے تھے اور ہونٹ ان کے پھڑپھڑا رہے تھے، اتنے جذباتی ہوگئے تھے چنانچہ میں نے شیخ صاحب سے بات کی تو وہ کہنے لگے کہ یہ بات تو ان کے تصوّر میں بھی نہیں آسکتی کہ کوئی ان کے بچے کو پیار کر سکتا ہے اتنی مظلوم ہیں وہ قومیں اتنی پیار کی وہ پیاسی ہیں اور ہم وہاں اسلام کی محبت اور پیار اور ہمدردی اور غمخواری اور مساوات اور جذبۂ خدمت (یہ ہمارے ہتھیار ہیں) دے کر اپنے مبلّغوں کو بھیجتے ہیں بجائے اس کے وہ ان کے بچوں کو گود میں اٹھائے یہ کہے کہ ان کے ساتھ بیٹھنے میں میری بے عزتی ہے توکام کیسے کرے گا وہ محبت کا پیغام کامیاب کیسے ہوگا؟
    وہاں میں نے دھڑلے کے ساتھ عیسائیوں کو یہ کہا کہ میں مانتاہوں کہ جب تم صدیوں پہلے ان ملکوں میں داخل ہوئے تو تمہارا بھی یہی دعویٰ تھا کہ تم عیسائیت کی محبت کا پیغام لے کر آئے ہو لیکن تمہارے پیچھے یورپی ممالک کی فوجیں اپنی توپوں سمیت داخل ہوئیں اور ان توپوں کے دہانوں سے محبت کے پھول نہیں برسے بلکہ گولے باہر نکلے اور جو انہوں نے تباہی مچائی تم جانتے ہو اس پر زیادہ روشنی ڈالنے کی ضرورت نہیں اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ عیسائیت محبت کے پیغام کا دعویٰ کرنے کے باوجود ناکام ہوئی اور اسے ناکام ہونا چاہئے تھاکیونکہ اس سے زیادہ پیارا اور حسین محبت کا پیغام محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعہ آسمان سے نازل ہوچکا تھا۔ اب ہم یہاں محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا پیغام لیکر آئے ہیں اور پچاس سالہ خدمت اور محبت اور ہمدردی اورغمخواری اور مساوات کا سلوک اس بات پر شاہد ہے اور تم اس کا انکار نہیں کرسکتے کہ نہ تمہاری سیاست میں ہمارا کوئی دخل نہ اس سے کوئی دلچسپی، نہ تمہارے مال میںکوئی دلچسپی ایک دھیلہ تمہارے ملکوں سے باہر نہیں نکالا بلکہ لاکھوں روپے باہر سے لاکر تمہارے ملکوں میں خرچ کئے ہیں۔اس لئے ہم جو پیغامِ محبت، ہمدردی اور غمخواری اور مساوات لیکر تمہارے پاس آئے ہیں جو محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیم ہے۔ وہ ضرور کامیاب ہوگا، ناکام نہیں ہوسکتاکیونکہ حقیقی معنی میں محبت کا جو بھی پیغام دنیا کی طرف آیا انسانی تاریخ اس بات پر شاہد ہے کہ کبھی بھی وہ ناکام نہیںہوا اس لئے ہم جیتیں گے، دنیا جتنا چاہے زور لگا لے۔ اسلام کی فتح اور اس کے غلبہ کے دن آگئے ہیں اور بڑی تحدی سے میں یہ اعلان کرتا تھا۔ امریکہ سے Peace Core (پیس کور) کے کچھ استاد جو ہمارے سکولوں کے ساتھ بھی حکومت نے لگائے ہوئے ہیں ایک موقعہ پر احمدی سکولوں کے ساتھ بو(Bo) میں جب پندرہ سو طالب علم جمع تھے تو ان کے ساتھ ان کو بھی آنا پڑا۔ سارے اساتذہ ان کے ساتھ تھے میری تقریر کے بعد وہ آپس میں باتیں کررہے تھے جو ہمارے دوستوں نے سنیں وہ کہنے لگے کہ حضرت صاحب نے اتنی تحدی سے یہ بات کہی کہ اسلام کے غلبہ کے دن آگئے ہیں اور دنیا کی کوئی طاقت اسے روک نہیں سکتی اس لیے ہمیں اپنی فکر کرنی چاہئے اور یہ بات بھی ان کے نقطئہ نگاہ سے فکر کی بات ہے اور ہمارے نقطۂ نگا ہ سے دنیا کے لئے خوش قسمتی کے دن ہیں کہ یہ خدا سے دوری میں دن گزار رہے تھے اب خدا تعالیٰ کے قرب کی راہیں ان پر کھولی جارہی ہیں بہرحال اپنے نقطۂ نگاہ سے ان کو یہی کہنا پڑا کہ ہمیں اب اپنی فکر کرنی چاہئے پس ہمارا جو مبلّغ حقیقی معنی میںمحبت اور ہمدردی اورغمخواری اورمساوات اور جذبہ خدمت لے کر وہاں نہیں جاتا اور محمدرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ محبت بھرا پیغام ان کونہیں پہنچاتا وہ کامیاب نہیں ہوسکتا۔ آپ کی توکیفیت تھی لَعَلََّکَ بَاخِعٌ نَفْسَکَ اَنْ لاَّ یَکُوْنُوْا مُؤْمِنِیْنَ(الشعراء:۴) یہ جذبہ اگر اس کے دل میں نہیں ہے تو وہ ناکام مبلّغ ہے اس کا کوئی اثر نہیں ہے لیکن اگر یہ ان سے محبت نہ کرے میںتوسات سات آٹھ آٹھ دن مختلف ملکوں میں رہاہوں مگر جتنے بچوں سے میں نے پیار کئے ہیں اتنے ہمارے سارے مبلّغوں نے تین سال میں بھی نہیں کئے ہونگے ان کے بچوں سے پیار، پھر میں ان کے بڑوں کا بھی بہت خیال رکھتا تھا۔
    جب ہم بو(Bo)پہنچے ۔ ایک سوسترمیل سفر تھا گرمی، حبس، کھانا بھی وقت سے بے وقت اور میراجسم کوفت کی وجہ سے کام کے قابل نہیں تھا میں اپنے کمرہ میںچلا گیا جسم انکار کر رہا تھا کام کرنے سے وہاں بے وقت پہنچے اس وقت مجھے اطلاع ملی کہ دوہزار سے زیادہ احمدی یہاںپہنچ گیا ہے لاج میں اور وہ کہتے ہیں ہمیںمعلوم ہے کہ حضرت صاحب تھکے ہوئے ہیں لیکن ہمیں صرف اپنی شکل دکھا دیں اور ہم سلام کریں گے اور چلے جائیں گے میںنے سوچا اگروہ میری شکل دیکھنے کے بھوکے ہیں تو مجھے بہر حال تکلیف اٹھانی چاہئے میں نے انہیں کہا کہ میں تمہیں شکل ہی نہیں دکھائوںگا میں تم سے مصافحے بھی کروںگا پھر میں نے ان سے مصافحے کئے ان کو گلے لگایا دوگھنٹے کے قریب میں نے ان سے مصافحے کئے۔ میرا حال یہ تھا کہ ایک وقت ایسا بھی آیا مصافحوں کے دوران کہ مجھے یقین تھا کہ میں بیہوش ہوکر گر جائوں گا لیکن یہ ان کا حق تھا جسے میںنے بہرحال اداکرنا تھا۔ ایک ڈاکٹر صاحب جو ڈیوٹی پر تھے بطور ڈاکٹر کے تو ان کی ضرورت نہیں پڑی لیکن وہ پانی وغیر ہ کا خیال رکھتے تھے۔ ان کو میںنے کہا کہ میری یہ حالت ہے دس دس منٹ کے بعد مجھے پانی دیتے چلے جائو چنانچہ وہ دودوچارچار گھونٹ پانی کے مجھے پکڑاتے تھے تو میں پی لیتا تھا اور مجھے سہارا مل جاتا تھا اور سارا وقت میں نے ایسا کیا۔ جتنے پیار میں نے ان کے بچوں سے ایک ایک ملک میں کئے اور جس قدر محبت اور شفقت کا سلوک ان کے بڑوں سے کیا وہ بے ثمر نہیں رہا اکرہ سے کماسی۱۷۰ میل ہے اور اس کماسی ٹچی من ۷۰میل کے قریب۔ وہاں سے کئی سو میل شمال مغرب کی طرف ہماری وا(Wa)کی جماعتیں ہیں وہ علاقہ وا کہلاتا ہے وہاں بھی ہماری بیسیوں جماعتیں ہیں میں کماسی سے جس روز جارہاتھا سترمیل دوسری طرف ٹیچی من کی مسجد کے افتتاح کے لئے مجھے بتایا گیا کہ واکے دو سو احمدی بسیں لیکر آج رات پہنچ رہے ہیں یعنی جس صبح کوہم نے ٹیچی کیلئے چلناتھا اس سے پہلی رات کو انہوں نے مجھے یہ کہا۔ میں نے انہیں کہا کہ اب تو ٹیچی من کاپروگرام ہے اور یہ قریب تھا وہاں کیوں نہیںآئے تو وہ کہنے لگے کہ وہ رستے ٹھیک نہیں یہ اچھا راستہ ہے چنانچہ وہ کماسی پہنچ گئے میں نے ان سے کہا کہ ان سے کہو پھر انتظار کرو میں سترمیل وہاںگیا وہاںسارے دن کا پرگرام تھا پھرسترمیل واپس آیامغرب سے ذرا پہلے پہنچے نماز پڑھانے چلا گیا۔ سکول میں کئی ہزار آدمی آجاتا تھا پھرمغرب وعشاء میں ۔ کماسی میں انہیںکہا کہ نماز کے بعد صبح مجھ سے ملیں میں نے یہ خیال نہیںکیا کہ میں تھکا ہوا ہوں مجھے آرام چاہئے میں تو وہاں بمشکل ڈیڑھ دو گھنٹے سوتا تھا وہاں تومجھے نیند نہ آتی تھی اب آنی شروع ہوئی ہے۔ بہرحال وہاں مجھے کوئی تکلیف نہیں ہوئی یہ اللہ تعالیٰ کابڑا فضل ہے اور میں یہ نہیں کہہ رہا کہ میں نے تکلیف اٹھائی کیونکہ میں نے کوئی تکلیف نہیں اٹھائی اللہ تعالیٰ نے بڑا فضل کیاکہ اسکے باوجود میری صحت اچھی ہوگئی ڈاکٹر کی مجھے ضرورت نہیں پڑی۔ بشاش ہنستا کھیلتا میں ان میں رہا ہوں سارا وقت نماز کے بعد میں مردوں سے ملااورمنصورہ بیگم مستورات سے (منصورہ بیگم کو اللہ تعالیٰ جزا دے انہوں نے بڑا کام کیا میرے ساتھ) اور ان مستورات کی بڑی خدمت کی ہے مثلاً مستورات سے ملنا ملانا ورنہ ان کی سیری نہیں ہوتی بہرحال مجھے خیال آیا کہ کئی سومیل سے آئے ہیں زیادہ وقت میرے ساتھ رہ نہیں سکے صبح ہی انہوںنے واپس چلے جانا ہے یہی گھنٹہ دوگھنٹہ ہیں جو بیٹھ سکتے ہیں میرے ساتھ۔ دوسروں کی نسبت جن کو زیادہ وقت ملا ہے یہ زیادہ مستحق ہیں۔میں ان کے لئے کیا کروں کہ ان کا حق ادا ہوجائے پھر مجھے خیال آیا کہ ان میں سے ہرایک کے ساتھ میں معانقہ کروں گا چنانچہ سوا سو آدمیوں کے ساتھ میں نے معانقہ کیااور پھر تقریر کی۔ اس موقعہ پر ان کی زبان بولنے والا کوئی ایسا شخص نہ تھا کہ میری انگریزی زبان کا ترجمہ کردیتا بڑی مشکل پیش آئی۔ میں تو بہرحال انگریزی بولتا تھا اور ہمارے مبلّغ کوبھی وہ زبان نہیںآتی تھی پھر پتہ لگا کہ عربی سمجھنے والے چند ایک ان میں ہیں۔ میں نے کہا پھر میں عربی بولوں گا۔ پھر تقریر جو کرنی تھی عربی میں کی میں نے ۔ پھر ترجمہ ہوا اس کا پھر میںنے معانقہ کیااور معانقہ سے ان کو جو خوشی ہوئی اس کا اندازہ آپ نہیں کرسکتے ان میںسے ایک کی تصویر سلائیڈ مولوی عبد الکریم صاحب نے لی وہ میں اپنے ساتھ لے آیا ہوں کسی وقت دکھائونگا۔ آپ یہ دیکھیں گے کہ ان کے چہرہ سے اطمینان اور محبت اور پیار اور اللہ تعالیٰ کی حمد کے ایسے ملے جلے جذبات کا اتنا خوبصورت مظاہر ہ ہے کہ دِل حمد باری سے بھر جاتا ہے پس اللہ کے فضل سے ہزاروں سے معانقہ کیا، ہر ملک میں اور سینکڑوں ہزاروں کوپیارکیا۔ مجھے یقین ہے کہ ہمارے مبلّغوں نے تین تین سالوں میں بھی اتنا پیار نہیں کیا ہوگا، یہ قومیں پیار کی بھوکی ہیں، بڑے مخلص ہیں لیکن ہمارے بعض مبلّغوں کو اس کا خیال نہیں، وہ وہاں مستقل بیٹھے ہوئے ہیں ہر وقت کا ملناجلنا ہے۔ اگر وہ بھی اس طرح بچوں سے پیار کریں بڑوں کو سینے لگائیں ان سے ہمدردی کریں اور پیار اور محبت کا مظاہر کریں ان کی بیویاں وہاں کی احمدی مستورات سے پیارکریں تو ساری قوم احمدیت قبول کرلے۔
    ایک دن میں پچاس ہزار سے ایک لاکھ عیسائی اور بدھ مذہب والوں کو میں نے دیکھا کہ مجھے دیکھ کر خوشی سے ناچنے لگتے ہیںان پر کیا چیز اثر کررہی تھی(ویسے تو اللہ کافضل تھا اسی کا فضل ہے) انہوںنے دیکھا کہ ایسا آدمی آیا ہے جو ہم سے پیارکرتا ہے اورہمارے بچوں کوسینہ سے لگالیتا ہے ہمارے مردوں سے معانقہ کرتا ہے اوراسے اپنے آرام کا کوئی خیال نہیں ہمارے پیار میں محو ہے ان کے پیار سے میںنے جسمانی قوت بھی بڑی حاصل کی میں کم خورہوں میں نیند ویسے بھی نہیں لے سکا لیکن اس محبت اورپیار سے میری روح غذا لے رہی تھی اور میرا جسم پوری طرح مطمئن تھا۔ غرض یہ اثر عیسائیوں پر تھا۔ آپ کہیں گے کہ یہ کیسے پتہ لگا کہ یہ یا عیسائی ہیں عیسائیوں کا پتہ اس طرح لگتا تھا کہ مسلمان سڑکوں پرناچتے نہیں عیسائی اور غیر مذہب والے ناچتے ہیں چنانچہ مجھے دیکھ کر جو ناچنے لگ جاتے تھے میں سمجھتا تھا کہ یہ عیسائی ہے یا مشرک ہے بہر حال مسلمان نہیںہے۔ احمدی یا غیر احمدی اُن کی عورتیں اورمرد اس طرح سڑکوں پر نہیں ناچتے۔رقص اورناچ عیسائی معاشرے کا حصہ ہے اسلامی معاشرہ کا حصہ نہیں ہے چنانچہ ایک دن میں پچاس ہزار سے زائد غیر مسلم مجھے دیکھ کر خوش ہوئے ویسے تو یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے۔ میں نے اللہ تعالیٰ کی بڑی حمدکی نہ جان نہ پہچان غیرمذہب کا ایک آدمی ان کے اندر آیا ہے یہ اسے دیکھ کر خوش ہورہے ہیں(وہاں مذہبی لڑائیاں نہیں لیکن ایک مخالفت تو ہے ناوہاں ہم نے اعلان کیا کہ ہم شکست دیں گے عیسائیت کو پیار کے ساتھ شکست دیں گے دلائل کے ساتھ، آسمانی نشانوں کے ساتھ شکست دیں گے بہرحال ہمارا اوران کا مقابلہ ہے)لیکن اس کے باوجود مجھے دیکھ کر وہ خوش ہوتے تھے اسلئے کہ وہ سمجھتے تھے کہ یہ وہ شخص ہے جو باہر سے آیا ہے ہمیں نہیں جانتا لیکن اس کے دل میں ہمارا پیا ر ہے اس کاجواب مجھے مل رہا تھا۔ میں وہاں پر اپنے مبلّغوں کو کہتا رہا تھا کہ دیکھو! نہ جان نہ پہچان نہ ہم مذہب نہ ہم خیال نہ کوئی واسطہ جب وہ مجھے دیکھتے ہیں تو میں مسکراتاہوں تو وہ بھی مسکراتے ہیں۔ بڑے افسردہ چہروں کو بھی میں نے دیکھا گو اتنے زیادہ افسردہ چہرے تو مجھے نظر نہیں آئے لیکن ایک سنجیدہ آدمی کو جب بھی میں نے مسکرا کرسلام کیا تو بشاش ہوکر اس کے دانت نکل آتے تھے اور سلام کاجواب مسکرا کر دیتا تھا میں نے اعلان کیا کہ’’آج کا دن مسکراہٹوں کا دن ہے‘‘ تبسم کرنے کا دن‘‘ کا اعلان کردیا۔ میں نے کہا آج کے دن اتنی مسکراہٹیں چہروں پرکھلی ہیں کہ آج کے دن کو میں مسکراہٹوں کا دن قرار دیتا ہوں اور اس کا اعلان کرتا ہوں اور جب ان کے ہیڈ آف دی سٹیٹس سے میں نے ملاقات کی توان کومیں نے کہا کہ میں نے کل کے دن کو مسکراہٹوں کا دن قراردیا ہے کیونکہ مسلم بھی غیر مسلم بھی عیسائی بھی مشرک بھی پچاس ہزار سے لاکھ تک مسکراہٹیں میں نے تمہاری قوم سے وصول کی ہیں اس پر وہ بڑا خوش تھا۔ میں نے کہا کہ یہاں مجھے کوئی بدامنی کوئی غصہ کوئی رنجش کوئی لڑائی اس قوم میں نظر نہیں آئی چنانچہ وہ بڑاخوش ہوا اسے خوش ہونا چاہئے کیونکہ حقیقت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ان کوبڑا اچھا لیڈر دیا ہے اور اس لیڈر کو دنیوی لحاظ سے بڑی اچھی قوم دی ہے ابھی ہم نے ان کو دین سکھا نا ہے اوراللہ تعالیٰ کی محبت ان کے دلوں میں قائم کرنی ہے وہ علیٰحدہ بات ہے لیکن دنیوی لحاظ سے وہ قوم بڑی اچھی اور ان کالیڈر بڑا اچھا پیار کرنے والاہے۔ پریس کا نفرنس میں پوچھا گیا کہ آپ کا ہمارے لیڈر کے متعلق کیا خیال ہے؟ میںنے جواب میں کہا کہ تمہیں اپنے لیڈر پرفخر کرنا چاہئے۔
    You should be proud of him.
    اور اسے تم پر فخر کرنا چاہئے۔
    He should be proud of you.
    اسے تم پر فخر کرنا چاہئے ایسی اچھی قوم اللہ تعالیٰ نے اسے عطا کی ہے بات یہ میں آپ کو بتا رہا ہوں کہ وہ پیار کے بھوکے اور پیاسے ہیں اور میں غیر ملک سے گیا نہ جان نہ پہچان میں نے ان کو پیاردیا اورپیار ان سے وصول کیا اور ان کے لئے یہ بڑی حیرت انگیز بات تھی کہ ایک مسلم رہنما ،اپنی جماعت کا ہیڈ، خلیفہ اورامام اوروہ آکر بے تکلف ایک غریب آدمی کے بچہ کو اٹھا تا اور اس سے پیار کرتا ہے وہ حیرا ن ہو کر دیکھتے تھے اور خوشی سے اچھل پڑتے تھے۔ جہاں رکنا پڑتا تھا وہاں دوسرے بچوں کو بھی اسی طرح پیار دیتا تھا ہر ایک کو پتہ تھا کہ ہمارے ساتھ ایک پیار کرنے والا آگیا ہے پس ہمارے ایسے مبلغ وہاں جانے چاہئیں کہ جو ایک طرف ا پنے رب کریم سے انتہائی ذاتی محبت اور پیار کرنے والے ہوں اور دوسری طرف اس رب کریم کی مخلوق سے پیار کرنے اور پیار سے ان کی خدمت کرنے والے ہوں تب ہماری جیت ہوگی وہ جو بدتمیزی سے اپنے بڑوں سے بات کرتے ہیں یا جویہ سمجھتے ہیں کہ کالے افریقن کے ساتھ بیٹھنے سے ان کی بے عزتی ہوجاتی ہے وہ نہ مخلوق کی خدمت کرسکتے ہیں نہ اللہ تعالیٰ کا پیار دلوں میں قائم کر سکتے ہیں کچھ ان کا قصور ہے کچھ ہمارا قصور ہے اب میں نے نظام بدل کر اس کا اعلان کردیا ہے اس کیلئے میں ایک کمیٹی بنائوں گا کیونکہ اس کے لئے بہت سی دفتری باتیں ہیں ان کا فیصلہ کرنا ہے ان کے پراویڈنٹ فنڈ اور ان کے حقوق وغیرہ کے متعلق ان سب پر غور کرکے اس پول کے اندر لے کر آنا ہے خدا کے فضل سے مالی معاملات کے احمدی ماہر اسوقت گورنمنٹ میں کام کرتے ہیں ان میں سے ایک کومیں نے پیغام بھیج دیا ہے کہ ایک ہفتہ کی چھٹی لیکر یہاں آجائو تب وہ پول بن جائیگا انشاء اللہ۔ لیکن ان ساری باتوں کے علاوہ جو بنیادی بات ہے وہ میں پھر کہنا چاہتا ہوں کہ انسان کی تدبیر تبھی اچھے نتائج نکالتی ہے جب اللہ تعالیٰ کا فضل اللہ تعالیٰ کی رحمت اس کے ساتھ شامل ہو اس لئے آپ سب دعائیںکریں اور میں بھی دعاکررہا ہوں کہ اللہ تعالیٰ نے جوایک نئی تدبیر ذہن میں ڈالی ہے اس کو ٹھیک طورپرعملی جامہ پہنانے کی بھی اللہ تعالیٰ توفیق دے اور اس کے بہترین نتائج نکالے تاکہ جو ہم محسوس کررہے ہیں کہ اگر ہم انتہائی کوشش کریں تو جلد ساری کی ساری قومیں احمدیت کی آغوش میں آجائیںگی یہ نظارہ ہم اپنی زندگیوں میںآٹھ دس سال کے اندر اندر دیکھ لیں اور اس سے زیادہ خوشی اس دنیا میں اورکوئی نہیں ہوسکتی کہ وہ لوگ جو محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے دور تھے وہ جنہوں نے محمد صلی اللہ علیہ وسلم کاحسن نہ دیکھنے کی وجہ سے اللہ تعالیٰ کے حسن کے جلوے بھی نہیں دیکھے، وہ جو محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے محبوب ترین امتی حضرت مہدیٔ معہود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے دور ہیں۔ یہ سارے حسن اور اللہ تعالیٰ کی صفات کے مختلف جلوے جو اس دنیا میں ہمیں نظر آتے ہیں وہ بھی ان کو پہچاننے لگیں اور اس حسن کے گرویدہ ہوں اور ان حسنوں سے برکتیں حاصل کریں اور دین ودنیا کی ترقیات ان کو ملیں اور وہ بھی اس مقامِ نعیم میں آجائیں کہ دنیا جب ان کے چہروں پر نگاہ ڈالے تو انہیںکالے رنگ نہ نظر آئیں بلکہ انہیں منوردل نظر آئیں اورساری دنیا ایک برادری اورایک خاندان بن کر امن اورسکون کی اوراطمینان کی اورمحبت وپیار کی زندگی گزارنے لگے۔(اللّٰھم اٰمین)۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۳۰؍جولائی ۱۹۷۰ء صفحہ۲ تا۱۰)
    ززز



    مومنوں کو نفاق کے محاذ پر بڑی بیداری،چوکسی اور فراست کے ساتھ شیطان کا مقابلہ کرنا چاہئے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲۶؍جون۱۹۷۰ء۔ بمقام مسجد مبارک ربوہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    گرمی اور دھوپ کی وجہ سے میری طبیعت دوتین دن سے ٹھیک نہیں ہے آنکھوں پر بھی اثر ہے دورانِ سر اوردردِسر بھی ہے اگر چہ آج ہمت نہیں تھی لیکن میں نے آپ سے چند ضروری باتیں کہنی تھیں اس لئے اللہ تعالیٰ پر تو ّکل رکھتے ہوئے یہاں آگیا ہوں۔ چند باتیں مختصراً کہوں گا آپ سوچیں اوراس اختصار ہی کو بہت سمجھیں۔
    پہلی بات تو میں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ آپ قرآنِ عظیم کو حرزِ جان بنائیں اس میں اللہ تعالیٰ نے ہمیں ہر شعبۂ زندگی کے متعلق ہدایت دی ہے ہمارے لئے اس ہدایت کو سمجھنا اور اس پر چلنا ضروری ہے۔ اجتماعی زندگی کے متعلق اللہ تعالیٰ نے ہمیں بڑی وضاحت سے تنبیہہ کی ہے کہ جب وہ کوئی سلسلہ قائم کرتا ہے تو شیطان کو اس بات کی بھی اجازت دیتا ہے کہ وہ نفاق کی حدود سے اس سلسلہ پر حملہ آور ہو۔ شیطان کے چیلے ایک منافق کی حیثیت سے الٰہی سلسلہ میں داخل نہیںہوتے بلکہ وہ ایک ’’مصلح‘‘ کا جُبّہ پہن کر آتے ہیں ان کا بزرگی اورتقدس اوراصلاحِ نفس کا نعرہ ہوتاہے۔ ان کے ریاء اور نفاق اور تکبّر کے جُبّہ پر ہرطرف’’اِنَّمَا نَحْنُ مُصْلِحُوْنَ‘‘ (البقرۃ: ۱۲) لکھا ہوتا ہے لیکن ان کے اس ’’اصلاح‘‘ کے نعرہ کے پیچھے جو شیطنت اورنفاق جھلک رہا ہوتا ہے ایک مومن کی فراست اسے بھانپ لیتی ہے اور اس سے کسی صورت میں بھی جماعت مؤمنہ کو نقصان نہیں پہنچتا۔
    یہ نفاق ترقیات کے دَور میں اور زیادہ بڑھ جاتا ہے۔ اسلامی تاریخ پر نظر ڈالیں توآپ کو معلوم ہوگا کہ جہاں جہاں بھی اللہ تعالیٰ نے اسلام کو استحکام بخشا اور مسلمانوں کے پائوںکو مضبوطی سے قائم کیا وہیں شیطان نے نفاق کے جال کو زیادہ ہوشیاری کے ساتھ بچھایا اور جب بھی اُمِّت مسلمہ کے ان افراد نے بیداری اور چوکسی اور ہمت اور فراست کے ساتھ نفاق کا مقابلہ نہیں کیا اسلام کی عظمت اور اس کی شان باقی نہ رہی(مسلمان کی کہنا چاہئے کیونکہ اسلام کی عظمت اورشان تو قائم ہے آسمان پر بھی اور زمین پر بھی) مسلمان کی شان باقی نہ رہی۔
    پس ہم نے نہایت ہوشیاری کے ساتھ، نہایت فراست کے ساتھ اس محاذ پر شیطان کا مقابلہ کرنا ہے اعلان اور دعویٰ تویہی ہوگا کہ ’’اِنَّمَا نَحْنُ مُصْلِحُوْنْ ‘‘(البقرۃ: :۱۲) لیکن ہمارا جواب (اللہ تعالیٰ کی زبان میں) یہی ہوگا۔’’اَ لَا اِنَّھُمْ ھُمُ الْمُفْسِدُوْنَ‘‘ ((البقرۃ: ۱۳)کہ تم ہی فسادی ہو۔ تم بزرگی اور تقدس اور صالحیّت کے جامہ میں اپنے نفاق کو چھپا نہیں سکتے۔
    دوسری بات میں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ میں نے ’’نصرت جہاں ریزروفنڈ‘‘ کا اعلان کیا ہے اللہ تعالیٰ کے فضل سے جماعت کے مخلصین نے اس پر اس وقت تک بہترین رنگ میں لبّیک کہا ہے۔ کل شام کی جو رپورٹ ہے اس کے مطابق ساڑھے بارہ لاکھ روپے کے قریب وعدے ہوگئے ہیں اور قریباً سوالاکھ ڈیڑھ لاکھ روپے نقد آگئے ہیں(اب جبکہ یہ خطبہ شائع ہورہاہے وعدے بیس لاکھ تک پہنچ چکے ہیں اور قریباً اڑھائی لاکھ روپیہ نقد وصول ہوچکا ہے۔ الحمداللہ۔(ادارہ) نقد اس لئے کم جمع ہوئے ہیں کہ میں نے نومبر تک مہلت دے رکھی ہے لیکن جو دوست اس وقت ادا کرسکتے ہوں انہیں ادا کر دینا چاہئے۔ نومبر کا انتظار نہیں کرناچاہئیے۔ نومبر تک کی مہلت توزیادہ تر زمیندار بھائیوں کی سہولت کے لئے دی گئی ہے تاکہ انہیں قرضے لے کر اس مد میں رقم ادا نہ کرنی پڑے کیونکہ جب خریف کی فصلیں آئیں گی تو اس وقت ان کی مالی حالت ایسی ہوگی کہ وہ سہولت کیساتھ یہ قربانی دیسکیں گے۔ غرض ان (زمینداروں) کو مدِّنظر رکھتے ہوئے نومبرتک کی مہلت دی گئی ہے۔ بعض اور دوست بھی ایسے ہوسکتے ہیں جواپنی مجبوریوں کی وجہ سے اس مہلت سے فائدہ اٹھالیں لیکن جو دوست آج ادا کرسکتے ہیں انہیں کل کا انتظار نہیںکرناچاہئے۔
    اسی سلسلہ میں ایک اور بات میں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ اگر انگلستان کی جماعت اس مَد میںفضل عمر فائونڈیشن سے دواڑھائی گنا زیادہ رقم دے سکتی ہے تو میری غیرت اورآپ کی غیرت یہ نہیں پسند کرے گی کہ ہم لوگ انگلستان کی جماعت سے پیچھے رہ جائیں۔ اس لئے اس مدّمیں پاکستان کا چندہ فضلِ عمر فائونڈیشن کے چندہ سے دواڑھائی گنازیادہ ہونا چاہئے اگر دوست توجہ کریں اوراللہ تعالیٰ ہم پر فضل اور رحم فرمائے توہم یہ حقیر سی قربانی اس کے حضور پیش کردیں گے اور اپنے رب سے یہ کہیں گے کہ اے ہمارے پیارے محبوب ربّ کریم!ہم نے تیری رضا کے حصول کے لئے یہ حقیر سی قربانیاں دیں اور تو نے جو یہ اظہار کیاہے کہ مومن کاہرقدم پہلے سے آگے ہی پڑتا ہے اس کے مطابق ہم نے کوشش کی، تُوجو تمام خزانوں کا مالک ہے تو ان نہایت حقیر قربانیوں کو قبول کراور ہمیں اپنی رضا کے عطر سے ممسوح کر۔
    تیسری بات جو میں کہنا چاہتا ہوں وہ یہ ہے کہ علاوہ مال کے(جو ضرورت کے لحاظ سے بہت تھوڑا ہے لیکن بہر حال اللہ تعالیٰ ہمیں جتنی توفیق دیتا ہے ہم وہی اس کے حضور پیش کرسکتے ہیں)ہمیں آدمیوں کی بھی ضرورت ہے اور اس کے متعلق میںآج یہاں غالباً پہلی دفعہ یہ اپیل کررہا ہوں۔ انگلستان میں جب میں نے تحریک کی تووہاں کے بعض بڑے بڑے تعلیم یافتہ اور اونچی ڈگریاں لینے والے احمدی ڈاکٹروں نے افریقہ میں کام کرنے کیلئے رضاکارانہ طورپر اپنی خدمات پیش کردیں۔ بہرحال ہمیں کم سے کم۳۰ ڈاکٹروں اور۷۰،۸۰ ٹیچرز کی ضرورت ہے ہمارا ایم۔بی۔ بی۔ایس ڈاکٹر بھی وہاں کام کرسکتا ہے ایسے ڈاکٹروہاں اس وقت کام کررہے ہیں اوراللہ تعالیٰ کے فضل سے بڑے کامیاب ہیں۔ٹیچنگ لائن میں ایک بی۔اے جس نے ٹریننگ حاصل کی اور جو بی۔ایڈ کہلاتا ہے اسے وہ لوگ زیادہ پسند کرتے ہیں اور ایک ایم۔ ایس۔ سی اور ایم ۔اے کی نسبت اس کے لئے جلدی اور سہولت سے پرمٹ مل جاتا ہے۔غرض بی۔اے، بی۔ایس سی جس نے ٹریننگ بھی حاصل کی ہو اسے وہاں کی حکومتیں ترجیح دیتی ہیں۔ اس کے مقابلے میںاگر کوئی محض ایم۔ اے یا ایم۔ ایس۔ سی ہو اور ٹریننگ حاصل نہ کی ہو اسے وہ اقوام ٹیچنگ لائن میں وقعت کی نگاہ سے نہیں دیکھتیں۔ البتہ جس نے ایم۔ اے، ایم ۔ایس۔ سی کے ساتھ ٹریننگ بھی کی ہو وہ تو اور بھی اچھی بات ہے۔
    یہاں پاکستان میںاللہ تعالیٰ کے فضل سے ہر سال سینکڑوں ہزاروں احمدی نوجوان بی۔اے، بی۔ایس۔ سی اور ایم۔ اے، ایم۔ایس۔سی کا امتحان پاس کر تے ہیں۔ ان سینکڑوں ہزاروں میں سے اس وقت ہمیں۷۰،۸۰ نوجوانوں کی ضرورت ہے جواللہ تعالیٰ کی راہ میں زندگی وقف کریں۔ جو دوست وہاں جاتے ہیں وہ اکثر جگہ(ہر جگہ تونہیں کیونکہ جہاں نئے سکول کھولیں گے وہاںہم اتنا گزارہ نہیں دیں گے) لیکن وہ سیرالیون میں مثلاً یہاں کے یونیورسٹی کے پروفیسروں جتنی تنخواہ بھی لے رہے ہیں اوراللہ تعالیٰ کا ثواب بہرحال اس پر زائد ہے لیکن وہ اللہ تعالیٰ کی اس رحمت کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ ان ملکوں کا دَورہ کرتے وقت میرا احساس یہ رہا ہے کہ ہمارے مبلغوں سے ہمارے ٹیچرز کسی بھی لحاظ سے کم نہیں ہیں۔ وہ بڑے پیار اور بڑی تندہی سے کام کرنے والے ہیں۔ مجھے شرم سے یہ اظہار کرناپڑتا ہے کہ ان لوگوں کا کام اپنی سنجیدگی اور متانت کے لحاظ سے، اپنی ذمہ داری کے احساس کے لحاظ سے اور جو وقت وہ خرچ کررہے ہیں اس کے لحاظ سے اور جو اثر وہ اپنے طلبہ پر پیدا کررہے ہیں اس کے لحاظ سے غرض بہت سی باتوں میں وہ تعلیم الاسلام کالج سے بھی زیادہ اچھے ہیں اوریہ شرم کی بات ہے ہمارے مرکز کے سارے تو نہیں لیکن بعض اساتذہ یہ سمجھتے ہیں کہ وہ گپیں ہانکنے کے لئے پیدا ہوئے ہیں اوراگرسٹاف روم میں بیٹھ کر گپیں ہانکتے رہیں توگویا انہوں نے اپنا فریضہ ادا کردیا۔ انہیں بھی شرم آنی چاہئے ہمیں بھی شرم آرہی ہے۔ جو سات ہزار میل دور جاتا ہے جسے اللہ تعالیٰ نے دنیا بھی دی(اس کا دماغ خراب ہوسکتاتھا جیسا کہ دنیا داروں کا ہوجاتا ہے) لیکن اللہ تعالیٰ کے فرشتوں نے ان کے ذہنوں کو سنبھالا۔ وہ بالکل بے نفس ہیں یعنی پیسہ ان کو مل رہا ہے لیکن آپ یہ محسوس نہیں کریں گے کہ انہیں زیادہ پیسہ مل رہاہے وہ بڑی محنت واخلاص سے وہاں کام کررہے ہیں۔ طلباء میں اتنا ڈسپلن ہے کہ آدمی حیران ہوجاتا ہے۔ ہمارے تعلیم الاسلام کالج کے مقابلے میں وہاں کے طلباء میںزیادہ ڈسپلن ہے حالانکہ ان میںسے بہت بڑی تعداد غیر احمدیوں، عیسائیوں اور مشرکوں کے بچوں کی ہوتی ہے۔ عیسائیوں اورمشرکوں میں سے بہت سے ماں باپ کہتے ہیں کہ وہ ہمارے سکولوں میں اپنے بچوں کو اس لئے داخل کرنا چاہتے ہیں کہ وہ سمجھتے ہیں ہمارے سکولوں میں ان کے بچے خراب نہیں ہوں گے لیکن کیا ہم کہہ سکتے ہیں کہ ہمارا بچہ تعلیم الاسلام کالج میں داخل ہوکر خراب نہیں ہوگا؟ سوال مَیںکردیتا ہوں جواب آپ خود سوچ لیں۔
    پھروہاں بڑی خوبی کی بات یہ ہے(کہ یہاں عام طورپرسٹاف کے ممبر آپس میں لڑتے رہتے ہیں مگر) وہاںسٹاف کے ممبروں میں غیر احمدی بھی ہیں عیسائی بھی ہیں اوربعض غیر ملکی بھی ہیں لیکن ان میں آپس میں بڑا پیار ہے کوئی لڑائی جھگڑا نہیں، بڑی امن کی فضا ہے اور اس پُرامن فضا کے پیدا کرنے میں ہمارے یہاں کے پاکستانی اساتذہ کا بڑا حصہ ہے جن میں سے (ساری جگہوں پر تونہیں لیکن) بہت سے پرنسپل ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں بڑے اچھے دل اور دماغ اور جذبات اور احساسات دئیے ہیں، اللہ تعالیٰ انہیں استقامت بخشے اور اپنی برکات سے نوازے۔ جو ڈاکٹر وہاں اس وقت کام کررہے ہیں وہ بھی بہت اخلاص سے کام کررہے ہیں ہمارے ہیلتھ سنٹر ابھی چند ہی ہیں مثلاًنائیجیریا میں ہمارے تین ہیلتھ سنٹر ز ہیں ایک گیمبیا میں ہے اور یہاں بہت سارے کھولنے کی ضرورت ہے۔ اللہ تعالیٰ کا جومنشاء مجھے معلوم ہوا ہے وہ یہ ہے کہ ہمیں پہلے ہیلتھ سنٹرز کھولنے کی طرف توجہ دینی چاہئے کیونکہ یہ بڑا غریب ملک ہے اوربیماری میں تو انسان ویسے ہی قابلِ رحم بن جاتا ہے وہ بیمار ہوتے ہیں تو انہیں وہاں کوئی معمولی طبّی امداد دینے والا بھی نہیں ہوتامیں نے بتایا تھا کہ سارے گیمبیا میں ایک بھی Eye Specialist (آئی سپیشلسٹ) نہیں۔ وہاں جس بیچارے کی آنکھیں خراب ہوجائیں وہ اپنی آنکھیں دکھانے کے لئے پاسپورٹ دکھا کر کئی سَومیل دور سینیگال کے دارالخلافہ ڈاکار(Dakar) جاتا ہے پھر اگر اسے عینک لگنی ہو تو وہ واپس آکر جس نمبر کی اسے عینک لگنی ہوتی ہے اسے لندن خط لکھ کر وہاںسے منگوانی پڑتی ہے اورجوعینک یہاںآٹھ دس روپے میں بن جاتی ہے وہاں اس کے اوپر ۱۰۰روپے سے بھی زیادہ رقم خرچ کرنی پڑتی ہے۔پس وہاں ایسے علاقوں کے علاقے پائے جاتے ہیں جہاں کوئی ڈاکٹر نہیں کماسی میں ایک پیرا ماؤنٹ چیف کئی سو میل سے مجھے ملنے آیا اور ایک M-P(ایم۔ پی) کو اپنے ساتھ سفارشی بنا کر لایا وہ کہنے لگا کہ ہمارے علاقے میں طبّی امداد کا کوئی انتظام نہیں آپ ہمارے ساتھ محبت کا سلوک کریں ہمارے علاقہ میں طبّی مرکز کھولیں۔ میں نے اس سے وعدہ کیا کہ ٹھیک ہے کھولیں گے انشاء اللہ۔ ان کے ساتھ جو ایم۔ پی تھا وہ کہنے لگا کہ جو دفتری کارروائی ہے جسے ہم سرخ فیتہ کہتے ہیں اس کی ذمہ داری میں لیتا ہوں۔ ہم وہ قوم نہیں ہیں جسے اپنی کامیابی کے لئے ملکی قانون توڑنے کی ضرورت پڑے ہم ملکی قانون کے پابند رہنے کے باوجود اللہ تعالیٰ کے فضل سے ترقیات کرتے چلے آئے ہیں اور کرتے چلے جائیں گے کیونکہ یہ اللہ تعالیٰ کی تقدیر ہے کوئی دُنیوی طاقت اس کے راستے میں روک نہیں بن سکتی۔
    پس نوجوانوں کوبھی آگے آنا چاہئے وہ نیک نیتی سے اپنے نام پیش کردیں۔ پھر ان میں سے ہم انتخاب کریں گے اور مختلف ملکوں میں ان کے کاغذ بھیجیں گے۔ میں یہ چاہتا ہوں کہ یہ کام اس سال کے اندر اندر ہوجائے اس طرح وہاں انشاء اللہ بہت سے طبّی مراکز کھل جائیں گے۔ ویسے ایک طبّی امداد کے مرکز کے لئے شروع میں یہ بھی ضروری نہیں کہ وہاں ہم اپنا کلینک بنائیںیا اپنی عمارت ہو۔ کوئی مکان کرایہ پرلے کر ہم اپنا کام شروع کرسکتے ہیں پھر اللہ تعالیٰ توفیق دے گا اور دے رہا ہے، دلوں کے جوبٹوے ہیں ان کو اس نے کھول دیا ہے کیونکہ جب تک دل کا منہ نہ کھلے اس وقت تک کسی کی جیب کے بٹوے کا منہ نہیں کھلاکرتا۔ اللہ تعالیٰ نے اپنی راہ میں قربانی کے لئے دلوں کے بٹووں کے منہ کھول دئیے ہیں۔
    میں نے پہلے بھی کہا ہے اور اب بھی کہتا ہوں کہ مجھے اس بات کی فکر نہیں کہ پیسہ کہاں سے آئے گا اور آئے گا بھی یانہیں۔ پیسہ یقینا آئے گاکیونکہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ تو جماعت سے قربانیاں مانگ وہ قربانیاں دے گی۔ انگلستان میں بھی مَیں نے یہی کہا تھا کہ جب خدا تعالیٰ نے میرے منہ سے یہ کہلوایا ہے کہ دس ہزار پائونڈ میرے جانے سے پہلے جمع ہوجائیں گے تو یہ کیسے ہوسکتا ہے کہ وہ جمع نہ ہوں؟ میرے منہ سے جو بات نکلی ہے خدا تعالیٰ خلافت کی غیرت کی وجہ سے اسے پورا کرے گا اور اس نے اپنے فضل سے پورا کردیا۔ یہ اللہ تعالیٰ کی عجیب شان ہے۔ ۱۹۶۷ء کی بات ہے میں غالباً پہلے بھی بتا چکا ہوں ایک موقع پر جب مجھ سے بارہ(یہ پادریوںکی ایک ایسوسی ایشن تھی اس کے) نمائندے اکٹھے ملنے آئے تھے۔ تو ایک شخص کے متعلق بے خیالی میں ہی میرے منہ سے نکل گیا کہ تمہیں مذہبی قانون آتا ہے (وہ پادری جو کج بحثی کررہا ہے) تم اسے جواب دو مَیں جواب نہیں دوں گا جس وقت میرے منہ سے یہ فقرہ نکل گیا تو فوراً مجھے یہ احساس ہوا کہ مجھے تو پتہ ہی نہیں کہ اسے مذہبی قانون آتا ہے یا نہیں۔ اگر اس نے آگے سے یہ جواب دیا کہ مجھے مذہبی قانون نہیںآتا تو یہ میرے لئے شرمندگی کا باعث ہوگا لیکن ہوایہ کہ اسے مذہبی قانون آتا تھا۔ بعد میں وہ کمال یوسف صاحب سے کہنے لگا کہ میں حیرا ن ہوں حضرت صاحب کو کیسے پتہ لگ گیا کہ مجھے مذہبی قانون آتا ہے کیونکہ میں اس وفد میں ایک اور آدمی کے بیمار ہوجانے کی وجہ سے عین آخری وقت میں شامل کیا گیا ہوں اورمَیں یہ نہیں سوچ سکتا کہ میرے متعلق علم حاصل کرلیا ہو کیونکہ مَیں وفد آنے سے ایک دوگھنٹے پہلے شامل ہوا ہوں پس وہ حیران تھا۔ اللہ تعالیٰ اپنی رحمت کو اس طرح بھی دکھاتا ہے اس نے جب یہ کہا میں نے خلافت کو اپنی برکتوں اور رحمتوں کے نزول کے لئے قائم کیا ہے تو دنیا جو مرضی سمجھتی رہے۔ اپنے یاغیر جو مرضی کہتے رہیںاللہ تعالیٰ کی برکات اوررحمتیں توخلافت کیساتھ وابستہ ہیں وہ اپنے بے شمار فضل جماعت پر نازل کررہاہے۔ منافق ان فضلوں کودیکھ کر کُڑھتا اور جلتا اوراندر ہی اندر بھنتا ہے۔ دوسرے مخالفین کو بھی یہی کہاگیا ہے اور منافقین کو بھی یہی کہا گیا ہے۔’’مُوْتُوْا بِغَیْظِکُمْ‘‘ (اٰل عمران :۱۲۰)اس کا ترجمہ یہ ہوگا کہ تم اپنے غصّہ میں جلومرو۔اللہ تعالیٰ اوراللہ تعالیٰ کے قائم کردہ سلسلوں کو تمہاری کیا پرواہ ہے۔ یہ عظیم نشان جس کے ہزاروں کروڑوں پہلو ہیں یہ عظیم نشان جماعت کے اندر نظر آرہا ہے۔ خداتعالیٰ اپنی پوری شان کے ساتھ اوراپنی تمام صفات کے جلووں کے ساتھ ہم پر جلوہ گر ہے اس واسطے بُغض وعناد کے جو دھوئیں ہمارے سامنے آتے ہیں ان کی حقیقت ایک مردہ مچھر کی بھی نہیں ہے اور ہر احمدی کو یہ سمجھنا چاہئے کہ مچھر بھی تو ہمیںآکر کاٹتا ہے اوربخارچڑھا دیتا ہے لیکن اس سے کیا فرق پڑتا ہے؟ ہزاروں مچھر کاٹتے ہیں مگر جسے اللہ تعالیٰ زندہ رکھنا چاہتا ہے اسے زندہ رکھتا ہے۔پس جو الٰہی سلسلہ کا وجود ہے کیا وہ مچھروں کے کاٹنے سے نقصان اٹھائے گا؟ یہ بات توعقل میں نہیں آتی۔
    بہرحال اللہ تعالیٰ کے فضل نازل ہورہے ہیںان کے حاصل کرنے کا دروازہ آپ کے لئے کھلا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اس کا موقع آپ کودے دیا ہے آپ اس کے فضلوں اور اس کی رحمتوں کوحاصل کریں اور اس کے پیار اور اس کی رضا کے وارث بنیں۔ یہ دنیا اور اس دنیا کے اموال اور اس کی عزتیں ہیں کیا شے؟ اللہ تعالیٰ کی آنکھ میں ایک سیکنڈ کے لئے اس کی محبت کا جلوہ دیکھ لینا اتنی عظیم چیز ہے کہ ساری دنیا اور اسکی ساری دولتیں اور عزتیں اس پر قربان کی جاسکتی ہیں۔ ہم میں اللہ تعالیٰ کے فضل سے ایسے ہزاروں دوست ہیں جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی قوتِ قدسیہ کے نتیجہ میں اور آپ کے محبوب ترین روحانی فرزند مہدی معہود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی برکات اور فیوض کے طفیل اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں پیاراور محبت اوررضا کا جلوہ دیکھ رہے ہیں۔
    پس جو دوست اپنا نام پیش کریں گے(مجھے یقین ہے کثرت سے نام پیش کریں گے) وہ اپنے کوائف وغیرہ سے متعلق مجلس نصرت جہاں وکالتِ تبشیر تحریک جدید کو مطلع کریں (ایک دوسری کمیٹی بھی بنائی گئی ہے جومالی کمیٹی کہلاتی ہے مگر یہ انتظامی کمیٹی ہے) یہاںسے جو پہلے ڈاکٹر گئے ہیں ان کے متعلق خط وکتابت ہوتی رہی ہے اسے دیکھ کر(اس انتظامی کمیٹی کے ممبر) اخبار میں شائع کردیں گے کہ اس قسم کے ڈاکٹروں کی ضرورت ہے۔ پس ہمیں فوری طور پر کوائف چاہئیں وہ آپ جلدبھجوادیں تاکہ ہم حسبِ ضرورت اجازتیں لیتے چلے جائیں ممکن ہے بہت زیادہ آدمیوں کی طرف سے درخواستیں آجائیں۔ اس وقت جتنے آدمیوں کی ضرورت ہوگی انہیں بھیج دیںگے پھر باقیوں کو بھی اگر اگلے سال ضرورت ہوئی تو اس وقت بھیج دیں گے لیکن میں سمجھتا ہوں کہ جماعت کو دعائوں کے ساتھ اورتدبیر کے ساتھ اللہ تعالیٰ سے یہ توفیق مانگنی چاہئے کہ ہم کم از کم تیس۳۰ ہیلتھ سنٹرز (یعنی طبی امداد کے مراکز)اسی سال کے اندر کھول دیں یہ کام بڑا ہی ضروری ہے ۔ بعض تفاصیل ہیں وہ تو میں اس وقت نہیں بتائوں گا لیکن یہ مسئلہ اتنا اہم ہے کہ آپ اس کا اندازہ نہیں کرسکتے۔ اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے ہمارے نوجوانوں کے دل بھی اور ہمارے بزرگ ڈاکٹروں کے دل بھی اس خدمت کے لئے کھول دے اورتیار کردے اوران کے دل میں خدمت کا جذبہ پیدا کردے۔جودوست وہاں جائیں وہ یہ یاد رکھیں کہ وہ دنیا کمانے کے لئے وہاں نہیں جارہے(اگرچہ دنیا ان کو پھربھی مل جاتی ہے) ان کی نیّت یہ ہونی چاہئے کہ وہ دنیا کمانے کے لئے نہیں جارہے بلکہ اپنے رب کو راضی کرنے کے لئے جارہے ہیں اور اس کی مخلوق کی خدمت کرنے کے لئے جارہے ہیں۔ پس ان لوگوں سے پیار کریںان سے ہمدردی رکھیں جب کوئی بیمار آپ کے پاس آئے یا آپ کسی بیمار کے پاس جائیں تو آپ اس سے نہایت محبت اورخندہ پیشانی سے اورہمدردانہ طریق سے پیش آئیں ایک اچھے اورنیک ڈاکٹر کی توباتیں بھی آدھی مرض کودُور کردیتی ہیں۔ پھر حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ارشاد کے مطابق ان کے لئے بہت دعائیں کریں اوریہ ایک عظیم فرق ہے ایک احمدی ڈاکٹر اوراس ڈاکٹر میں جو ابھی احمدی نہیں۔ ایک احمدی ڈاکٹر اپنے مریض کی صرف تشخیص ہی نہیں کرتا یا اسے دواہی نہیں دیتا بلکہ اس کے لئے دعائیں بھی کرتا ہے پھر اللہ تعالیٰ اسکے کاموں میں برکت ڈالتاہے جس کے نتیجہ میں ان مریضوں کے دلوں میں محبت پیدا کر تا ہے۔ ہم نے دنیا کے دل خدا اوراس کے رسول کے لئے اپنی محبت اور پیار اور خدمت اورہمدردی اور غم خواری اور مساوات کے جذبہ سے جیتنے ہیں یہ ہمارا فرض ہے پس ہر ڈاکٹر کو یہ احساس ہونا چاہئے کہ وہ کس غرض کے لئے وہاں گیا ہے پھر اللہ تعالیٰ ان کے ہاتھ میں شفا بخشے گا۔
    اس وقت جو ڈاکٹر وہاں گئے ہیںمَیں عام طورپر ان کے لئے دعائیں کرتاہوں۔ مثلاًڈاکٹر سعید ابھی تھوڑا عرصہ ہوا ہے وہاںگئے ہیں ۔مَیں نے انہیں بھجوایا تھا۔ ان دنوں میں میرے دل میں خاص طورپر یہ جذبہ تھا میں نے بڑی دعا کی کہ اے اللہ! تیری راہ میں یہ شخص سات ہزار میل دُور جارہاہے تُواپنے فضل سے اس کے ہاتھ میں شفا بخش دے ۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ نے ان کے ہاتھ میں شفا بخش دی اور وہاں وہ بڑے کامیاب ڈاکٹر ہیں۔
    پس کم از کم۳۰ ڈاکٹروں کی ضرورت ہے(اور مجھے امید ہے اس سے زیادہ ہوجائیںگے) کچھ توانگلستان میں پڑھنے والے ڈاکٹروں میں سے بھی بعض نے اپنی خدمات پیش کی ہیں لیکن میں نے بتایا ہے کہ ہمارے پاس سب کے نام آجانے چاہئیں پھر ہم ان میں سے انتخاب کریںگے ان کیQualification(کوالیفیکیشن)دیکھیں گے اور اسی طرح دوسرے کوائف مثلاً عمر اور عادات وغیر ہ وغیرہ ہزاروں باتیںہیںیہ سب دیکھ کر پھر ان کو وہاں بھجوائیں گے۔ ویسے وہاں بڑا ہی مخلص دل انسان جانا چاہئے جس کے اُوپر ہم پورے طورپر اعتماد کرسکیں مثلاً نائیجیریا میں ہمارے ایک ہسپتال کے متعلق میں نے بتایا تھا کہ انہوں نے پندرہ ہزارپائونڈ سے زیادہ کی سیونگ کی۔ وہاں ان پر کسی قسم کاکوئی دبائو نہیں ہوتا بس اخلاص سے وہ ہرمہینے آپ ہی رقم بھیج دیتے ہیں سارے میڈیکل سنٹرز کا یہی حال ہے وہ لکھ دیتے ہیں کہ ہمارے سارے اخراجات کے بعد یہ رقم بچی ہے اسے ہم بھجوارہے ہیں۔
    پس ہمیں اس قسم کے آدمیوں کی ضرورت ہے کیونکہ جورقم بچتی ہے وہ کسی کی ذات پر تو خرچ نہیں ہونی ان ملکوں پر خرچ ہونی چاہئے۔ اور میرا اندازہ یہ ہے کہ اگر گیمبیا میں مثلاً چارہیلتھ سنٹرز کھل جائیں تو ہم وہاں ہر سال ایک نیا ہائی سکول کھول سکتے ہیں ہم نے ان دونوں میدانوںمیں متوازی طورپر بڑی سُرعت کے ساتھ آگے بڑھنا ہے لیکن وہاں پہلے طبّی امداد کے مراکز کھلنے چاہئیں۔دوست اپنے نام پیش کریں اورمحمد اسمٰعیل صاحب منیرؔ جو متعلقہ کمیٹی کے سیکرٹری مقرر کئے گئے ہیں وہ مطلوبہ کوائف کے متعلق اخبار میں اعلان کرائیں اور باربار اعلان کرائیں۔ میرے خیال میں ہمارے احمدی ڈاکٹروں کی ایک مجلس بھی ہے اس کی میٹنگ بھی بلائیں پھر انہی کے سپرد کریں گے کہ سب کے کوائف کو مدِّ نظر رکھ کر منتخب کریں کہ کون زیادہ موزوں ہے؟ ویسے تو بعض دفعہ بظاہر ایک ناموزوں انسان بھی جب وہاں چلا جاتا ہے تو اگر وہ دعا کرنے والا ہے تو اللہ تعالیٰ اس کی قابلیت بھی بڑھا دیتا ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ ہی سرچشمہ ہے علوم کا او رقابلیت کا۔ شفا بھی اس کی ہے باقی تو اس دنیا میں سب پردے ہیں جن کے پیچھے ہمیں اس کی صفات کے جلوے نظر آرہے ہیں۔آج میں نے تین باتیں کہی ہیں ایک یہ کہ آپ کی فراست اور آپ کی بیداری سے منافق کو پتہ لگ جانا چاہئے کہ نفاق اس سلسلہ میں کامیاب نہیں ہوسکتا دوسرے یہ کہ میں نے جو’’نصرت جہاں ریزروفنڈ‘‘ قائم کیا ہے اس میں اس وقت تک انگلستان کی جماعتیں دوسرے ہرملک کی جماعتوں سے آگے نکلی ہوئی ہیں۔ اس وقت تک کا مَیں نے اس لیے کہا ہے کہ اس فنڈ کے متعلق میں نے پہلے ان سے اپیل کی تھی لیکن خدا کرے کہ صرف یہی وجہ ہو اس کے علاوہ اورکوئی وجہ نہ ہو اور آپ جلد ان سے آگے نکلنے کی کوشش کریں اور تیسری بات میں نے یہ کہی ہے کہ احمدی ڈاکٹر اور ٹرینڈٹیچرز رضاکا رانہ طورپر اپنی خدمات پیش کریں اور دین ودُنیا کی حسنات کے وارث ہوں۔ جیسا کہ میں نے لندن میں بھی کہا تھا آپ کو بھی وہی بات کہہ دیتا ہوں۔آپ رضا کارانہ طورپر اپنی خدمات پیش کریں ورنہ اگر رضا کارانہ طورپر جو خدمات پیش کی گئیں اگر ضرورت کے مطابق نہ ہوئیں تو پھر میں حکم دوں گا اور اس صورت میں آپ کے لئے دو۲ راستے کھلے ہوں گے یا جماعت کوچھوڑ کر علیٰحدہ ہوجائیں یا پھر خلافت کی اطاعت کریں اورآپ خلافت کی ضرور اطاعت کریں گے، انشاء اللہ۔ لیکن ایک رضاکارانہ خدمت اور ایک وہ خدمت جس میں کچھ مجبوری کا اثر بھی ہو اس خدمت میں ہماری عقل (اللہ تعالیٰ کو توپتہ نہیں کیا منظورہوتا ہے) ضرور فرق کرتی ہے۔
    اللہ تعالیٰ ہم سب کو ایسے اعمال کی توفیق بخشے جن سے وہ راضی ہوجائے اور جس کے نتیجہ میں اس کا وہ وعدہ پورا ہوجو اس نے حضرت رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا تھا اور جس کے پورا کرنے کے لئے اس نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو مبعوث فرمایا تھا اور وہ یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے روحانی فیوض کے نتیجہ میں مہدی معہود کے زمانہ میں تمام اقوامِ عالم کو اخوت اور برادری کے سلسلہ میں پرودیا جائے گا۔یہ وہ عظیم وعدہ ہے جو ہمیں دیا گیا ہے اوریہ وہ عظیم وعدہ ہے جس کے پوراہونے کے آثار اسلام کے افق پر آج ہمیں نظر آرہے ہیں اور خدا تعالیٰ نے جو یہ وعدہ کیا ہے وہ اسے ضرور پورا کرے گا۔ سوال صرف یہ ہے کہ اس وعدہ کے پورا کرنے کے لئے وہ ہم سے جو قربانیاں مانگتا ہے کیاہم اس کی منشاء کے مطابق اس کی رضا کے حصول کیلئے اس قدر قربانی پیش کردیں گے؟ جتنی وہ چاہتا ہے کہ ہم پیش کریںاگرہم ایسا کریں گے تو آپ یہ یاد رکھیں کہ خدا تعالیٰ نے ہمیں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ یہ بشارت دی ہے کہ ہم پر بھی ہمارارب کریم اسی طرح فضل اور رحم فرمائے گا جس طرح اس نے صحابہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر اپنے فضلوں اور رحمتوں کی بارش برسائی تھی۔ اس سے بڑھ کر ہمیں کوئی بشارت مل نہیں سکتی اور اس سے بڑھ کر کوئی انسان اللہ تعالیٰ کی رحمتوں کا وارث بن نہیں سکتا۔ پس آج وقت ہے دنیا، دنیا کے کاموں میں محو اورغافل ہے آپ خدا کے لئے اپنی غفلتوں کو چھوڑ کر اس کی اس عظیم بشارت کے وارث بننے کی سعی کریں۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو اس کی توفیق عطافرمائے۔ آمین۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۲۲؍ جولائی ۱۹۷۵ء صفحہ۳ تا ۶)
    ززز






    احمدیت اسلام کی روحانی جنگ لڑ رہی ہے
    عیسائیت کے خلاف جنگ کا فیصلہ افریقہ کی سر زمین میں ہوگا
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۳؍ جولائی۱۹۷۰ء بمقام سعید ہائوس ایبٹ آباد)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت کی بڑی غرض یہ ہے کہ تما م اقوامِ عالم کو اسلام کی حسین تعلیم کا گرویدہ بناکر حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ مضبوط رشتہ روحانی کوجوڑدیں۔ اس نقطہ نگاہ سے ہراحمدی بوڑھے، جوان،بچے اور عورت کو دنیا پرنگاہ ڈالنی چاہئے کہ ہم نے انشاء اللہ بنی نوع انسان کے دلوں کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جیتنا ہے۔
    جب ہم مذہبی نقطہ نگاہ سے دنیا پر نظر ڈالتے ہیں تو جو نقشہ ہمارے سامنے آتا ہے وہ یہ ہے کہ دنیا کا ایک بہت بڑا حصہ دہریت اور الحاد کا شکار ہوچکا ہے مثلاً روس ہے یہ ایک بہت بڑا ملک ہے روسی نہ صرف یہ کہ خدا کو بھلا بیٹھے ہیں بلکہ ایک وقت میں انہوںنے یہ دعویٰ بھی کیا تھا کہ وہ زمین سے(نعوذباللہ)اللہ کے نام کو اور آسمان سے اس کے وجود کو مٹادیںگے۔
    ضمناً مَیں یہ بھی بتا دیتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ نے اس مشہور"Iron Curtain"(آئرن کرٹن) میں ہماری خاطر شگاف ڈال دیا ہے اور کمیونسٹ ممالک میں لوگ احمدی ہونے شروع ہوگئے ہیں۔ ایک یوگوسلاوین ڈاکٹرآصف جب مَیں دورہ پر گیاہوں مجھے زیورک میںملے۔ چنددن تک وہ وہیں رہے۔ نہایت شریف اورذہین آدمی ہیں میڈیسن کے ڈاکٹر ہیں لیکن اٹامک ریسرچ میں بھی انہیں مہارت ہے لیکن اس کے تشخیص والے حصے میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ پہلے میراخیال تھا کہ چونکہ اٹامک انرجی کے ذریعہ علاج ہونے لگ گیا ہے شاید وہ اس میں دلچسپی لیتے ہوں گے اس لئے دس پندرہ منٹ مَیں نے ان سے گفتگو کی اوربتایاکہ یہ تو ایک غیر فطری علاج ہے جس کی طرف اب دنیا جارہی ہے چنانچہ اس کے متعلق جو دلائل اس وقت میرے ذہن میں آئے وہ میں نے انہیں بتائے وہ چپ کر کے خاموشی سے میری باتیں سنتے رہے پھر جب میں خاموش ہوا تو وہ کہنے لگے مجھے اس علاج والے حصہ سے کوئی دلچسپی نہیں ہے صرف تشخیص والے حصہ سے مجھے دلچسپی ہے۔ چند سال ہوئے وہ احمدی ہوئے تھے پھر وہ واپس اپنے ملک یوگوسلاویہ گئے وہاں انہوں نے تبلیغ شروع کردی اور اب وہاں ان کے ذریعہ ایک جماعت قائم ہوگئی ہے۔ اسی طرح پولینڈ میں بھی چند آدمی احمدی ہوچکے ہیں۔ چیکو سلاویکیہ ہماری جماعت کے ساتھ بڑی دلچسپی لے رہا ہے میں بڑا حیرا ن ہوا کہ یہ اللہ تعالیٰ کے نام دنیا سے مٹانا چاہتے تھے مگر اکرہ(گھانا) میں مسجد کے سنگ بنیاد کے موقعہ پر اور سفراء جو مسلمان تھے وہ توآئے ہی تھے لیکن چیکو سلاویکیہ کا سفیر وہاں موجودتھا وہ ہمارے کاموں میں بڑی دلچسپی لے رہاتھا۔ اکرہ میں ہمارے قیام کے دوران میںجوبھیFunction(فنکشن)ہوا اس میں چیکوسلاویکین سفیر شامل ہوتارہا۔ ایک ایسی جماعت میں دلچسپی لینا جس کے متعلق اسلام کہتا ہے کہ انسان کی ملکیت ہی نہیں’’اَنَّ الْمَسَاجِدَ لِلّٰہِ‘‘ (الجنّ :۱۹) یہ اللہ تعالیٰ کی ملکیت ہے۔ ایک ایسی عمارت میں دلچسپی لینا جس میں پانچ وقت اللہ تعالیٰ کا نام بلند ہوتا اور اس کی عظمت وکبریائی کا اقرار کیا جاتا ہے اس کے سنگِ بنیاد کی تقریب میں ایک ایسے ملک کے سفیر کا شامل ہونا جودنیا سے اللہ تعالیٰ کا نام مٹانا چاہتے تھے معنی رکھتا ہے۔ مَیں اس کی تفصیل میں اس وقت نہیں جاسکتا۔
    بہرحال دنیاکاایک بڑاعلاقہ ایسا ہے جہاں دہریت اور الحاد کی حکومت ہے اگرچہ یہ صحیح ہے کہ اللہ تعالی نے اس"Iron Curtain"(آئرن کرٹن) میں ہمارے لیے شگاف پیدا کردیاہے اورہم ان علاقوں میں داخل ہوچکے ہیں مگر یہ ابھی ابتداء ہے اس کی انتہاء یہ ہے کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے ’’میں اپنی جماعت کو رشیا کے علاقہ میں ریت کی مانند دیکھتا ہوں۔‘‘ (تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ ۶۹۱) یہ آپ کی کشف ہے لیکن اس انتہا کی طرف اشارہ کرتا ہے جس کے متعلق میں اس وقت بات کررہاہوں۔ اسی طرح چین ہے وہاں سے بھی مذہب کونکال دیا گیا ہے اور اس کی جگہ دہریت اور الحاد آگیا ہے۔(یورپ کے بعض ممالک میں بھی یہی حالات ہیں) مگر یہ تو وہ علاقے ہیں جہاں حکومت اور عوام نے اعلان کردیا کہ مذہب سے ان کاکوئی تعلق واسطہ نہیں۔
    علاوہ ازیں دنیا کے بہت بڑے علاقے ایسے ہیں جن پرعیسائیت کا لیبل لگا ہوا ہے۔ مثلاً عام گفتگو میں آپ کہیں کہ سارایورپ عیسائی ہے عام گفتگو میں آپ کہیں گے کہ انگلستان ایک عیسائی ملک ہے عام گفتگو میں آپ کہیں گے کہ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ عیسائی ممالک ہیں۔ عام گفتگو میں آپ کہیں گے کہ کینیڈا اور یونائیٹڈ سٹیٹس آف امریکہ عیسائی ممالک ہیں عام گفتگو میںآپ کہیں گے کہ جنوبی امریکہ(جس میں بہت سے ممالک ہیں) عیسائی ملک ہے اسی طرح افریقہ کے بعض حصوں کے متعلق آپ کہیں گے کہ یہ عیسائی ممالک ہیں لیکن حقیقت یہ ہے کہ یہ عیسائی ممالک نہیں ہیں البتہ کسی وقت یہ عیسائی ممالک ہوا کرتے تھے۔ اب مثلاًیورپ ہے یورپ میں اللہ تعالیٰ کے فرشتوں نے تثلیث کو ختم کردیا ہے یعنی گرجا کے ساتھ انہیں کوئی دلچسپی نہیں رہی البتہ ان قوموں پر عیسائیت کا لیبل لگا ہواہے ۔ آپ نے کبھی خواب میں بھی نہیں دیکھاہوگا آپ اپنے تصور میں بھی نہیں لاسکتے کہ کسی مسجد کے سامنے For Sale (فار سیل) کا بورڈ لگا ہواہو یعنی یہ مسجد قابلِ فروخت ہے۔ لیکن خود میری ان آنکھوں نے لندن کے بعض گرجوں کے سامنے For Sale(فارسیل) کا بورڈ لگا ہوا دیکھا ہے دوسری مصروفیات کی وجہ سے مجھے اکثر باہر نکلنے کاکم ہی موقعہ ملتا تھا لیکن جب کبھی میں موٹر میں باہرنکلتا اور کہیں گرجا نظر آتا خصوصاً اتوار کے روز تومَیں یہ دیکھنے کی کوشش کرتا کہ مجھے اندر جانے والے یاباہر نکلنے والے نظرآجائیں اور مَیں یہ معلوم کرسکوں کہ وہ کس عمر یا کس ٹائپ کے لوگ ہیں۔
    جب مَیں۱۹۶۷ء میں وہاں گیا تھا تو اس وقت ایک موقعہ پر ہماری کارایک گرجے کے سامنے سے ایسے وقت گزری جب کہ پرستش کرنے کے بعد عیسائی گرجا سے باہر نکل رہے تھے چنانچہ میںیہ دیکھ کر حیران ہوگیا کہ اگر مَیں بہت ہی محتاط اندازہ لگائوں تو یہ ہو گاکہ ان میں ۹۰فیصد لوگ ساٹھ سال سے بڑی عمر کے تھے اور بمشکل ۵فیصد لوگ ساٹھ سال سے کم عمر کے تھے۔ اس طرح نوجوانوں کی گویا تین نسلیں سمجھنی چاہئیں یعنی اگر ہر ایک نسل ۲۰ سال کی ہو توپچھلی تین نسلیں ایسی ہیں جنہیں عیسائیت سے کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ پھریہ بھی دیکھیں کہ انگلستان ایک عیسائی مملکت کہلاتی ہے مگر عجیب عیسائی مملکت ہے کہ وہاں کی ملکہ کو سوڈومی (Sodomy) بِل پر مجبوراًدستخط کرنے پڑے۔ ۱۹۶۷ء میں ایک دفعہ ایک پادری نے تھوڑی سی شوخی دکھائی تھی اگرچہ وہ بڑے ادب سے بات کرتا تھا لیکن مجھے اس کی باتوں میںہلکی سی شوخی کی بُو آئی۔ اس کا جواب مَیں نے یوںدیا کہ مجھے تم لوگوں پر رحم آتاہے۔ اس کے سوال اور میرے جواب میں بظاہر کوئی تعلق نہیں تھا لیکن مَیں تو اسے جھنجھوڑنا چاہتا تھا۔ وہ حیران ہوکر میری طرف دیکھنے لگ گیا کہ مجھے اُن پرکیوں رحم آتا ہے؟ مَیں نے اسے کہا کہ مجھے تم پر اس لئے رحم آتا ہے کہ جسے تم نے "Defender of Faith" (ڈیفنڈر آف فیتھ) قراردے رکھا ہے(عیسائیت نے انگلستان کے بادشاہ یا ملکہ کو ’’محافظ عیسائیت‘‘ کا لقب دے رکھا ہے) وہ مجبور ہوئی۔ سوڈومی (Sodomy) بِل پر دستخط کرنے کے لئے۔ اس سے زیادہ تمہاری قابلِ رحم حالت اور کیا ہوسکتی ہے؟
    بہرحال یہ عیسائی ممالک تو کہلاتے ہیں مگر ان میں عیسائیت نہیں ہے کسی وقت تھی مگر اب انہیں پتہ ہی نہیں کہ عیسائیت کسے کہتے ہیں۔ یہ ٹھیک ہے کہ وہاں بہت سے پادری ہیں یہ اور بعض دوسرے لوگ عیسائیت پر دیانتداری سے ایمان رکھتے ہوںگے ہم بدظنّی نہیں کرتے اور کسی کو تثلیث جیسے نامعقول عقیدے پر دیانتداری سے ایمان نہیں۔ ٹھیک ہے ہزاروں ہوںگے اور کروڑوں کی آبادیوں میں شاید لاکھوں بھی ہوں جو دیانتداری سے سمجھتے ہوں کہ تثلیث عیسائیت اور کفارہ کا مسئلہ صحیح ہے لیکن بڑی بھاری اکثریت ایسی ہے جنہیں عیسائیت سے کوئی دلچسپی نہیں صرف نام کے عیسائی ہیں اور بس۔کبھی گرجاچلے گئے کبھی نہ گئے۔ مذہب کی جو غرض ہے وہ بالکل مفقود ہے۔
    اس وقت جہاں عیسائیت کا کچھ Hold(ہولڈ) مجھے نظر آتا ہے(ہوسکتا ہے میرا اندازہ غلط ہو) لیکن جہاں تک مَیں نے سوچا ہے مجھے اس زمین پر عیسائیت کی تین Pockets (پاکٹس) نظرآتی ہے۔ ایک سپین ہے وہاں ابھی تکCatholicism(کیتھو لک ازم) کا Hold(ہولڈ) ہے اور کسی وقت تواتنی سخت گرفت تھی کہ وہ دوسرے عیسائی فرقوں کو گرجے اوردوسری عبادت گاہیں بنانے کی بھی اجازت نہیں دیتے تھے۔ ابھی چند سال ہوئے انہوںنے کچھ نرمی کی ہے۔ ہمارا ڈرائیور پروٹسٹنٹ تھا وہ بڑے غصّے سے کہتا تھا کہ ایسے باربیرین دنیا میں کبھی پیدا نہیں ہوئے کیونکہ ان پر انہوں نے پابندیاں عائد کررکھی ہیں۔
    بہر حال کیتھو لکس عیسائیت کا ایک فرقہ ہے اور سپین میں اس کا قوم پر کچھ نہ کچھ Hold (ہولڈ) ہے۔ اس کے علاوہ جنوبی امریکہ ہے وہاں بھی سپین اورپُرتگال کے لوگ گئے ہوئے ہیں اور وہاں یہی سپینش زبان بولتے ہیں اور غالباً اسی وجہ سے ان کے دماغ پر بھی اور ان کی زندگیوں پر بھی عیسائی مذہب کا ایک حدتک Hold(ہولڈ) ہے لیکن آج دنیا میں عیسائیت کی دوسرے مذاہب سے جوجنگ ہورہی ہے اس میںسپین کا اگر کوئی حصہ ہے توبہت معمولی اور جنوبی امریکہ کا غالباً کوئی حصہ نہیں ہے۔ شاید کچھ پیسے وغیرہ ان سے لے لیتے ہوںگے۔ اس جنگ میں وہ اس طرح شریک نہیں کہ وہ فرنٹیئر یعنی محاذ پر آکر اسلام کے مقابلے میں کھڑے ہوں۔پادری ابھی یورپ سے ہی جارہے ہیں مثلاً بلجیم، ہالینڈ، اٹلی اور فرانس ہیں۔ یہ عیسائیت کی پاکٹس رہ گئی ہیں۔ ان ملکوں کی اکثریت تو میرے نزدیک عیسائی نہیں رہی لیکن بہرحال ان ممالک میں عیسائیت کی سٹرانگ پاکٹس ہیں۔ وہاں افریقہ میںان ملکوں کے پادری جارہے ہیں ممکن ہے کچھ سپین کے بھی ہوں۔
    فکر اور تدبّر کرنے والے عیسائی پادری میرے نزدیک اس نتیجہ پر پہنچ چکے ہیں کہ اسلام کے ساتھ آخری معرکہ افریقہ میں ہے اور اب وہاں بڑا زور دے رہے ہیں۔ انگلستان میں گرجے برائے فروخت اور افریقہ میں نئے گرجے بنوارہے ہیں۔ پس اس کا مطلب یہ ہے کہ ان کی توجہ کا مرکز اس وقت انگلستان یا یورپی ممالک نہیں بلکہ افریقہ ہے۔حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت کے وقت مختلف عیسائی پادریوں کی جو بین الاقوامی کانفرنسیں ہوا کرتی تھیں ان میں وہ بیان دیا کرتے تھے(اور وہ چھَپے ہوئے ہیں ہمارے پاس ان کے حوالے موجود ہیں) کہ افریقہ ان کی جیب میںہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت کے وقت افریقہ عیسائیوں کے خیال میں ان کی جیب میں تھا پھر اس کے بعد حالات بدلے اللہ تعالیٰ نے فضل اور رحم کیا حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام مبعوث ہوئے اور وہ افریقہ جو عیسائیت کی جیب میں تھا (ذمہ دار پادریوں اوربشپس کے حوالے موجود ہیں کہ افریقہ ان کی جیب میں ہے) اس کے متعلق انہوں نے یہ کہنا شروع کردیا کہ یہ بات مشتبہ ہے پتہ نہیں یہ برِّاعظم عیسائیت کی جیب میں آتا ہے یا محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے عَلم کے نیچے جمع ہوجاتا ہے۔ چنانچہ وہ ففٹی۔ففٹی چانس کی باتیں کرنے لگے۔ پھر جب ہماری تبلیغی مہم اور تیز ہوئی توانہوں نے بین الاقوامی کانفرنسوں میں یہ بیان دئیے ہیں کہ اگر وہ ایک افریقن کوعیسائی بناتے ہیں تو احمدی دس افریقنوں کو مسلمان بنالیتے ہیں چنانچہ انہوںنے ایک اوردس کی نسبت سے اسلام کی فتح اور عیسائیت کی شکست تسلیم کرلی۔
    پھر جنہیں وہ عیسائی بناتے ہیں ان کی حالت یہ ہے کہ بلجیم کے ایک پادری افریقہ کے ایک ملک میں۵۲ سالہ تبلیغ کرنے کے بعد بوڑھے ہو کر واپس جارہے تھے ہمارے ایک مبلّغ بھیCourtesy call(کرٹسی کال) کے طور پر اس سے ملنے گئے اور اتفاق کی بات تھی کہ وہاں اس وقت اور کوئی نہیں تھا۔صرف وہ تھا یا ہمارا مبلّغ تھا۔ بے تکلّفانہ باتیں شروع ہوگئیں۔ وہ عیسائی پادری کہنے لگا کہ سچی بات یہ ہے کہ میرے۵۲ سالہ تجربہ اور کوشش کا نچوڑ یہ ہے کہ اس عرصہ میں مَیں نے صرف ایک آدمی کو عیسائی بنایا ہے ویسے ہزاروں پر مَیں نے عیسائیت کے لیبل لگائے ہیںلیکن مجھے پتہ ہے کہ وہ عیسائی نہیں ہیں کوئی ہم سے دُودھ لینے کی خاطرعیسائی ہوا ہے کوئی ہم سے تعلیم حاصل کرنے لئے عیسائی بنا ہے کوئی نوکری کی خاطر عیسائی ہوگیا ہے کوئی گندم اوردوسری غذائی ضرورتوں کی خاطر عیسائی بنا ہے مجھے پتہ ہے کہ وہ عیسائی نہیں ہیں ہمارے مال اور دولت میں انہیں دلچسپی ہے عیسائیت میں انہیں دلچسپی نہیں ہے لیکن ایک آدمی کے متعلق مجھے علم ہے کہ وہ دل سے عیسائی ہوا ہے۔ ہمارے مبلّغ نے اس سے کہا کہ ہم توہزاروں تم میں سے کھینچ کر مسلمان بنا چکے ہیں جن کا اللہ تعالیٰ کے ساتھ زندہ تعلق ہے اور ان کے متعلق ہم علیٰ وجہ البصیرت کہہ سکتے ہیں کہ وہ پختہ مسلمان ہیں اللہ تعالیٰ سے پیار کرنے والے ہیں حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے حسن واحسان کا ذاتی مشاہدہ کرکے آپ سے انتہائی محبت کرنے والے ہیں اور یہ ایک حقیقت ہے۔ ہم نے بھی وہاں اس قسم کے بہت نظارے دیکھے ہیں۔
    بہرحال مذہبی نقطہ نگاہ سے دنیا کا جو نقشہ ہمارے سامنے ہے وہ یہ ہے کہ بعض علاقوں میں تو ان اقوام نے اعلان کردیا کہ وہ عیسائی نہیں وہاںتودہریت اور الحاد کا زور ہے۔ یہ ہمارے لئے ایک علیحدہ محاذہے۔ اس کے متعلق میں کسی اور خطبہ میں بیان کروںگا دنیا کا ایک علاقہ اور یہ بہت بڑا علاقہ ہے اس میں ہمیں یا تونام کے عیسائی نظرآتے ہیں یا دہریہ ہیں اوروہ کہتے ہیںکہ ہم عیسائی نہیں ہیں لیکن عیسائیت کا نام ان ملکوں میں ہے اورجہاں عیسائیت کا کافی Hold(ہولڈ) ہے وہ سپین اور جنوبی امریکہ کے علاوہ افریقہ کا برِّاعظم ہے جہاں اسلام اور عیسائیت کے درمیان جنگ لڑی جارہی ہے۔
    اگر دنیا کا یہ نقشہ صحیح ہو اورمیرے نزدیک صحیح ہے تو اس لحاظ سے جماعت احمدیہ پر یہ زبردست ذمہ داری عائد ہوجاتی ہے کہ اس محاذ پر عیسائیوں کو شکست دے۔ وہاں افریقہ میںبھی عیسائیوں کا یہ حال ہے کہ ہمارے ایک دوست نے مجھے بتایا کہ پہلے شہروں اورقصبوں میں پڑھے لکھے لوگوں میںان کی تبلیغ کابڑازور تھا لیکن جب سے ہم آئے ہیں یہ ابBush(بُش) میں چلے گئے ہیں وہ دوست اپنی طرف سے تو یہ کہہ رہے تھے کہ اب ہم کیاکریں؟ میں نے انہیں فوراً کہا Follow them to the Bushتم بھیBushمیں جاکر ان کا پیچھا کرو انہیں یہاں بھی ٹکنے نہیں دینا۔
    عیسائیت اسلام کے خلاف جنگ لڑرہی ہے۔ یہ صحیح ہے لیکن یہ افریقہ کے معاشرہ پر اثر انداز نہیں ہوئی۔ مَیں پہلے بھی بتا چکاہوں ۔ ابھی آٹھ دس دن ہوئے رپورٹ آئی ہے کہ ہمارے چلے آنے کے بعد کماسی میں ایک بہت بڑا عیسائی پیرامائونٹ چیف مرگیا وہ خود عیسائی اور اس کے حلقہ اثر میں ہزاروں کی تعداد میں عیسائی لیکن اس پیرامائونٹ چیف کے مرنے پر جس طرح بدمذہب والے یعنی مشرک دفن کیا کرتے تھے وہی رسوم شروع ہوگئیں۔ مرنے والا بھی عیسائی اس کے علاقے میں اس کے ماتحت جو تھے ان میں سے بڑی بھاری اکثریت عیسائیوں کی لیکن رسوم جاہلیت کی اور ا نکے مطابق اسے دفنایا۔اس کا مطلب یہ ہوا کہ عیسائیت نے لیبل لگا دیا ہے لیکن معاشرہ میں کوئی تبدیلی نہیں پیدا کی۔ اس کے مقابلے میں(دنیا ویسے آگے نکل گئی ہے ہمیں وہی آواز پیاری ہے جو حضرت بلالؓ کی تھی) ہزاروں کی تعداد میں ہم نے عیسائیوں میں سے بھی اور مشرکوں میں سے بھی مسلمان بنائے ہیںاور ان کے سینے اللہ کے نور سے منور ہیں۔ وہ’’اَسْھَدُ اَنْ لاَّ اِلٰـہَ‘‘ کہنے والے نہیں بلکہ’’اَشْھَدُ اَنْ لَّااِلٰـہَ‘‘ کہنے والے ہیں یعنی ان کا عربی کا تلفظ بھی صحیح ہے۔وہ عربی کے ساتھ تعلق رکھنے میں بھی جنونی ہیں۔ احمدیت اور اسلام سے انہیں جو پیا رہے وہ تو ہے ہی لیکن عربی زبان سے بھی وہ عشق رکھتے ہیں۔ انہیںعربی بولنے کا بڑا شوق ہے چنانچہ وہاں کئی علاقوںمیں عربی بولی جاتی ہے۔ کماسی سے قریباً دواڑہائی سومیل دُور گھانا کے بارڈر پر واقع ہماری و ا ؔ (Wa)کی جماعتیں ہیں۔ کچھ وقت کم تھا کچھ وہاں کے حالات مثلاً سڑکوں اور سفر کی دوسری سہولتوں کا علم نہیں تھا اور پھر Briefing(بریفنگ) ناقص تھی چنانچہ ہمارا پروگرام یہ طے پایا کہ کماسی سے صبح ٹیچی مان جو ستّر میل کے فاصلے پرتھا وہاں جائینگے اور پھر واپس آجائیں گے۔کماسی میں وا ؔکے دو سو نمائندے آگئے آپ اندازہ لگاسکتے ہیں کہ وہاں ہماری کتنی جماعتیں ہوں گی یعنی مختلف جماعتوں کے دوسو نمائندے اکٹھے ہوکر آگئے اور مشکل یہ پیدا ہوگئی کہ ان کی اپنی لوکل زبان تھی جو کماسی کی زبان سے بالکل مختلف تھی اگرمیری تقریر کا کماسی کی زبان میں ترجمہ ہوتا تووہ بالکل سمجھ ہی نہیں سکتے تھے۔ چنانچہ میں نے دوستوںسے مشورہ کیا۔ کہنے لگے کہ اگر آپ انگریزی میں بولیں گے تو ان میںسے۵۔۱۰ فیصد سمجھ جائیں گے لیکن۹۰ فیصد بالکل نہیں سمجھیں گے اور پھر انگریزی تقریر کی صورت میں ان کی لوکل زبان میں ترجمہ کرنے والا بھی کوئی نہیں لیکن اگر آپ عربی میں بولیں تو یہ انگریزی سے زیادہ عربی سمجھ جائینگے۔ ہماری وہاں کی جماعتوں کے ایک پریذیڈنٹ بھی اس وفد میں شامل تھے وہ عربی اچھی جانتے تھے وہ کہنے لگے کہ میں آپ کی عربی تقریر کااپنی لوکل زبان میں ترجمہ کردوں گا چنانچہ وہاں مجھے مختصراً عربی میں تقریر کرنی پڑی۔ میں آپ کو یہ بتارہا ہوں کہ انہیں عربی سے بڑا پیا ر ہے اس علاقے کے لوگ ہماری طرح کی پگڑیا ں باندھتے ہیں ہماری نقل میں نہیں بلکہ ویسے ہی ان کا پرانا رواج ہے۔ کُلّاہ غالباً نہیںہوتا۔ اپنی ٹوپی پر پگڑی باندھتے ہیں لیکن ہمارے ملک کی طرح طُرّہ نکلا ہوا اور بالکل یہی شکل ہوتی ہے۔ وہ بڑے اچھے اور سادہ لوگ تھے۔ ہمارے جو دوست احمدی ہوتے ہیں یہ صحیح ہے کہ شروع میں بعض میں کمزوری ہوتی ہوگی کیونکہ ولی بن کر تو اس نے احمدی نہیںہونا بلکہ اللہ تعالیٰ کی توفیق سے احمدی ہوکر ولی بنے گا۔ اس کے لئے لمبے عرصہ تک تربیت کرنے کی ضرورت ہے بہرحال وہ لوگ بڑے مخلص احمدی ہیں۔ ہمارے ایک نوجوان ناتجربہ کا رمبلّغ نے ہمارے نائیجیریا کے پریذیڈنٹ جن کا نام بکری ہے ان کے ساتھ موٹر میں بیٹھے ہوئے کوئی بدتمیزی کردی۔ بکری صاحب کا ایک بٹیا وہاں کی ہائیکورٹ کا جج بھی ہے اور مخلص احمدی (نائیجیریا کے دومسلمان جج ہیں اور دونوں احمدی ہیں۔ ایک ہمارا احمدی ہے اورایک باغیوں میں سے احمدی ہے بہرحال وہ بھی اپنے آپ کو احمدی ہی کہتے ہیں) بکری صاحب نے جو اس مبلغ کو جواب دیا اس سے پتہ لگتا ہے کہ بدتمیزی کی ہے۔ میں ایک پرانا احمدی ہوں او ر احمدیت میرے رگ وریشہ میں رچی ہوئی ہے۔ مجھ پر تمہاری اس بات کاکوئی اثر نہیں لیکن میں تمہیں یہ بتادیتا ہوں اگر تم نے نوجوانوں کے سامنے ایسی بات کی تو ان کو احمدیت سے دور لے جانے کے تم ذمہ دار ہوگے۔ وہ لوگ احمدیت کے عاشق اور بڑی قربانیاں کرنے والے ہیں ان کا جوکیریکٹر ہے اور ان کی جوعادتیں ہیں وہ اتنی اچھی اور خوبصورت ہیں کہ مجھے بعض دفعہ فکر پیداہوتی ہے کہ وہ کہیں ہم سے آگے نہ نکل جائیں۔ اللہ تعالیٰ کاہمارے ساتھ کوئی رشتہ تونہیں کہ جو مرضی ہم کریں اور وہ ہمارے اوپر مہربان رہے اوردوسرے اس کی راہ میں زیادہ قربانیاں دینے والے، اس کے زیادہ عاشق اور اس سے زیادہ محبت کرنے والے ہوں اور وہ انہیں بھلا دے یہ تو نہیں ہوسکتا۔ وہاں جونسل اس وقت پرورش پارہی ہے وہ بڑی سنجیدہ ہے حالانکہ تعلیمی لحاظ سے بڑے پیچھے ہیںلیکن اس کے سوا کچھ نہیں کہا جاسکتا کہ وہ قوم سعید فطرت لیکر پیدا ہو رہی ہے (دنیوی لحاظ سے بھی) مثلاً کوئی بچہ سڑک پر نہیں آئے گا۔ وہاں ڈرائیور کوکوئی خدشہ نہیںہوتا کہ وہ کسی انسان کو Knock downکردے گا اور اسے مصیبت پڑجائے گی اور اسی واسطے وہ بالعموم ستّراسّی میل کی رفتار سے کار چلاتے ہیںچنانچہ ہم نے بو ؔ (Bo) سے سیرالیون تک۱۷۰ میل کی مسافت سواتین گھنٹے میں طے کی۔ کوئی آدمی سڑک پر نہیں آتا۔ سڑک کے کنارے سے سات آٹھ سال کے بچے’ ُکداڑے‘ لگا رہے ہوتے ہیں مگر کیا مجال ان میں سے کوئی سڑک پر آجائے وہ سڑک کے کنارے یا دکانوں کے پاس رہتے ہیںمگر جہاں سے ٹریفک گزر رہی ہوتی ہے وہاں بالکل نہیں جاتے۔ ان کی سنجیدگی کا یہ حال ہے کہ ایک چھوٹی افریقن بچی جسے ہم نے اپنی بیٹی بنایا ہے( اس کا باپ راضی ہوگیا تھا۔ اسے ہم ساتھ تو لا نہیں سکتے تھے۔ تیاری مکمل نہیں ہوسکتی تھی مثلاً پاسپورٹ وغیرہ بنوانا تھا) وہ بچی منصورہ بیگم کو اس لئے پسند آئی کہ تین گھنٹے کا جلسہ اور پانچ سال کی وہ لڑکی۔ منصورہ بیگم کہتی ہیں کہ وہ میرے قریب آکر بیٹھ گئی اور تین گھنٹے تک خاموشی سے بیٹھی رہی۔ یہاںتک کہ اس نے اپنی ٹانگ بھی نہیں ہلائی اور جلسہ کی کاروائی کو بڑی توجہ سے سنتی رہی حالانکہ اسے کچھ سمجھ نہ آرہا تھا۔ بچپن آخر اس کا بھی ہے صرف ہمارے بچوں کا بچپن تو نہیں ہوتا چنانچہ بچپن کی عمر نے بھی کوئی جوش نہیں دکھایا وہ ہلی تک نہیں بلکہ ساتھ بیٹھی ہوئی عورت نے اسے کہابھی کہ تم تھک گئی ہوگی اپنی ٹانگوں کو ہلائو جلائو مگر اس نے سُنی اَن سُنی کردی اور اسی طرح بیٹھی رہی۔
    پس اس قسم کے بچّے وہاں پیدا ہورہے ہیں وہاں ہمارے سکولوں میں عجیب ڈسپلن ہے انہیں دیکھ کر رشک آتا ہے۔ یہ صحیح ہے کہ زیادہ ڈسپلن اللہ تعالیٰ کے فضل سے ہمارے سکولوں میں پیدا ہوا ہے لیکن اس ڈسپلن کو قبول کرنے والے تو وہی افریقن ہی ہیں۔ وہ تعلیم میں بڑے اچھے جارہے ہیں۔ مجھے بھی بعض موقعوں پر(یہ نہیں کہ میں نے ان میں کوئی نقص دیکھا) یہ بات کہنی پڑتی تھی کہ پیچھے نہ دیکھو۔ یہ درست ہے تم مظلوم ہو کئی سَوسال تمہیں یورپی اقوام نے لُوٹا تمہیں تعلیم نہیں دی۔ اس حقیقت سے کسی کو انکار نہیں لیکن پیچھے دیکھنے کی ضرورت نہیں اسلئے کہ اگر تعلیم کے اور مادی ترقیات کے اور روحانی ترقیات کے دروازے تم پربند ہوتے اور تمہیں اپنے مستقبل کی طرف پیٹھ کرنی پڑتی توتم پیچھے دیکھتے اور کُڑھتے، گالیاں دیتے اور بدلہ لینے کی سوچتے لیکن جب اللہ تعالیٰ نے علم کے میدان میں بھی اور مادی ترقیات کے میدان میں بھی اور روحانی ترقیات کے میدان میں بھی ہمارے لئے بزرگ شاہراہیں کھول دی ہیں تو اب آگے بڑھو سامنے کی طرف دیکھو پیچھے کیوں دیکھتے ہو؟ ویسے ان کے اندر آگے بڑھنے کی اہلیت پائی جاتی ہے۔وہ بڑی سمجھدارقوم ہے وہ توجہ سے پڑھتے ہیں اور وقت کو ضائع نہیں کرتے۔ اس لئے وہ آگے بڑھ رہے ہیں۔ ایک نسل کے بعد دوسری نسل آتی ہے پتہ ہی نہیں ہوتا ایک صبح کو دنیا اُٹھ کر دیکھتی ہے کہ جس قوم کو لوگ پیچھے سمجھتے تھے وہ ان سے آگے نکل گئی ہے۔ جاپان کی تاریخ میں ایسا ہی ہوا یورپ سمجھتا تھا کہ کوئی ایشیائی ملک ان سے آگے نہیں نکل سکتا مگر ایک صبح کو انہیں یہ اقرار کرنا پڑا کہ جاپان ان سے آگے نکل گیا یا کم ازکم ان کے برابر آگیا ہے (اعلان تو شاید برابر آنے کاکیا تھا کیونکہ اپنے سے آگے نکل جانے کا تو وہ مان نہیں سکتے تھے) اور یہ اسلئے کہ جو ایک اندورنی تبدیلی رونماہوتی ہے، ایک نسل کے بعد دوسری نسل وہ مقام حاصل کررہی ہوتی ہے توکسی کو پتہ ہی نہیں لگتا۔ دنیا حیران رہ جاتی ہے۔
    یہ جو افریقہ میں اگلی نسل پرورش پارہی ہے جسے میں دیکھ کرآیاہوں اللہ تعالیٰ ان پر رحم کرے اور صداقت ان پر کھولے اور دین ودنیا کی حسنات سے ان کو نوازے ۔ وہ ایسے سعید فطرت ہیں کہ اگر ان کی صحیح تربیت کی جاسکے تو وہ دوسری قوموں سے آگے نکل جائینگے۔ روحانی لحاظ سے بھی وہ ہم سے آگے جاسکتے ہیں ہم نے کوئیMonopoly(اجارہ داری) تو نہیں کی ہوئی اللہ تعالیٰ سے۔ جو آدمی اس کی راہ میں زیادہ قربانیاں دے گا، جو اس سے زیادہ پیار کرے گا، جودنیا کو چھوڑ کر اس کی طرف زیادہ توجہ کررہا ہوگا اس سے وہ زیادہ پیار کریگا کیونکہ قرآن کریم میں جو اصول بیان ہوئے ہیں اس کے خلاف تو نہیں ہوسکتا۔
    بہت سارےDigression(ڈائی گریشن) یعنی ادھر ادھر بھی میں گیا ہوں۔ حالات بھی بتائے تھے۔ جو بات میں نے آپ سے اس وقت کہی ہے وہ خلاصتہً یہ ہے کہ اسلام کی جنگ سوائے احمدیت کے کسی اور نے نہیں لڑنی اور جو اسلام کی جنگ لڑی جانی ہے اس کے بڑے محاذ ہیں(اور چھوٹے چھوٹے محاذ بھی ہیں کسی وقت ان پر بھی روشی ڈالوں گا) ایک دہریت اور لادینیت کا محاذ اور دوسرا نام نہاد عیسائیت کا محاذ۔ نام نہاد میں نے اسلئے کہا ہے کہ عیسائیت اندر سے کھوکھلی ہوچکی ہے لیکن مادی لحاظ سے اور دنیوی طاقت کے لحاظ سے اس کا دنیا میں بڑا اثرورسوخ ہے۔ ایک خلافِ فطرت کام کرنیوالا افسر اورلیڈر جو ہے جہاں عیسائیت کا مقابلہ ہوگا وہ عیسائیت کی مدد کرجائیگا حالانکہ اس کے سارے اعمال اور زندگی عیسائی نقطہ نگاہ سے بھی گند میں ملوث ہے۔ یہ جنگ جو ہم نے عیسائیت سے لڑنی ہے اس کا فیصلہ افریقہ میں ہوگا کیونکہ اگر آج ہم افریقہ سے عیسائیت کو نکال دیں تو پھر ان کے لئے یہ بڑا ہی مشکل ہے سپین یا جنوبی امریکہ میںاس طرح اکٹھے ہوجانا اور Counter attack(کائونٹراٹیک) کے لئے جمع ہوجانا کہ جس میں انہیں کا میابی کی کوئی امید ہو۔
    عیسائیت کے دلائل کے خلاف حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے اتنا زبردست لٹریچر جمع کردیا ہے کہ انسان کی عقل دنگ رہ جاتی ہے۔ ایک ایک چیز کو لیکر اس کے پرخچے اڑا دئیے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے توفیق دی تو انشاء اللہ نوجوانوں کے لئے ان کا ایک خلاصہ شائع کردیا جائے گا جس میں صرف حضر ت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے بیان فرمودہ دلائل ہوںگے۔ عیسائیت کے ایک مسئلہ کے متعلق میں کچھ کہنا چاہتا تھا اس کے متعلق اب مختصراً ہی کچھ کہوں گا کیونکہ دیرہوگئی ہے اور یہ مسئلہ نجات ہے۔ عیسائیوں کے نزدیک نجات کا مفہوم یہ ہے (حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے جو بیان کیا ہے میں اسے اپنے الفاظ میں مختصراً بیان کررہاہوں) کہ انسان گناہ اور نسیان کے مواخذہ سے بچ جائے اور بس، یعنی گناہ تووہ کرتا رہے لیکن اسے سزا نہ ملاکرے یہ ان کے مسئلہ کفارہ سے استدلال ہوتا ہے۔میں اس وقت اس کی تفصیل میں نہیں جاسکتا بہرحال عیسائی اس بات سے انکار نہیں کرسکتے کہ ان کے نزدیک نجات کے معنے یہ ہیں کہ ایک گناہگار بیشک گناہ کرتا رہے لیکن اللہ تعالیٰ کی طرف سے مواخذہ نہیں ہوگا۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ دنیا میںبے شمار ایسے لوگ بھی ہوتے ہیں کہ خواہ ان کاکوئی مذہب ہویانہ ہو وہ اس قسم کے موٹے موٹے گناہ کرتے ہی نہیں۔ کیا مجال ہے کہ وہ زنا کریں، چوری کریں یا ڈاکہ ڈالیں یاکسی کوقتل کریں مگر پھر بھی کوئی عقلمند شخص انہیں نجات یافتہ نہیںکہہ سکتا۔ صرف اسلئے کہ وہ چوری نہیں کرتے، صرف اسلئے کہ وہ زنا نہیں کرتے ، صرف اسلئے کہ وہ ڈاکہ نہیں ڈالتے، صرف اس لئے کہ وہ قتل نہیں کرتے، صرف اسلئے کہ وہ لڑکیوں کو اغوا نہیں کرتے وہ نجات یافتہ نہیں کہلاسکتے۔ آپ نے فرمایا کہ نجات کا صحیح مفہوم ابدی خوشحالی اور دائمی مسرت ہے۔ یہ ابدی خوشحالی صرف اس وقت حاصل ہوسکتی ہے جب انسان کا اللہ تعالیٰ سے زندہ تعلق پید اہوجائے اوریہ زندہ تعلق پیدا نہیں ہوسکتا جب تک اللہ تعالیٰ کی معرفت اورشناخت حاصل نہ ہو کیونکہ جس شخص نے خدا تعالیٰ کی صفات کی شناخت ہی حاصل نہیں کی روحانیت میںاس کا اگلا قدم اٹھ ہی نہیں سکتا اور جس شخص نے اللہ تعالیٰ کی صفات کی شناخت کرلی، وہ شناخت جو انسان کو سنکھیا کے زہر کی ہوتی ہے اگرکوئی شخص اس کے سامنے اسکی قاتل ڈوز لاکر رکھ دے تو اسے پتہ ہوتا ہے کہ اگر میں اسے کھائوں گا تو مرجائوں گا گویا سنکھیا کی اسے شناخت ہوگئی او روہ اسے نہیں کھائے گا سوائے اس مجنون کے جسکی بات ہم نہیں کررہے یا جوخودکشی کررہا ہے۔
    پس آپ نے فرمایا کہ جتنی شناخت ایک شخص کو زہر یعنی سمِّ قاتل کی ہوتی ہے اتنی شناخت بلکہ اس سے بڑھ کر شناخت اللہ تعالیٰ کی صفات کی ہونی چاہئے۔ جتنی شناخت ایک نہتے انسان کو شیر کی طاقت کی ہے اگراسے پتہ لگے کہ اس راستے پر شیر دیکھا گیا ہے اور وہ ایک دو آدمیوں کو پہلے مار چکا ہے توکوئی نہتا شخص وہاں سے کبھی نہیں گزرے گا۔ پس یہ شناخت ہی کا نتیجہ ہے کہ اسے ایک معرفت عطاہوئی کہ یہ راستہ خطرناک ہے۔ جتنی شناخت کسی کوایک زہریلے سانپ کے زہر کی ہے اگر اسے پتہ ہوکہ اس جگہ سانپ ہے تو وہ اس کے سوراخ میں کبھی اُنگلی نہیں ڈالے گا اگر اس قسم کی شناخت یا اس سے بڑھ کر شناخت اللہ تعالیٰ کی صفات کی ہے تو یہ ایک صحیح اور حقیقی اور کامل معرفت ہے لیکن اگر ایسی نہیں تو پھر ایک وہم ہے ایک دعویٰ بلادلیل ہے۔ پس سچی خوشحالی اور دائمی مسرت کے حصول کیلئے اللہ تعالیٰ کی صفات کی معرفت ضروری ہے۔ جب ہرایک کو اپنی بساط اوراپنی استعداد کے مطابق اللہ تعالیٰ کی معرفت حاصل ہوجائے تو پھر اللہ تعالیٰ کی اس معرفت کے دو نتیجے نکلتے ہیں ایک تو چونکہ وہ نہایت عظمت اورجلال والی ذات ہے اس کی عظمت اورجلال کو دیکھ کر اور اس کے ساتھ ہی وہ بڑی حسین ذات ہے کیونکہ وہ سارے حسنوں کا منبع ہے اور سرچشمہ ہے ساری دنیا میں جہاں بھی حسن نظر آتا ہے وہ اسی کے حسن کا پر توہے اس کے حسن کا مشاہدہ کرکے اس کی شناخت پاکریہ خوف پیدا ہوتا ہے یہ عظیم ہستی جس نے مجھے پیدا کیا اور قویٰ دئیے وہ کہیں مجھ سے خفا نہ ہوجائے۔ جس خوف کا ہم نام لیتے ہیں وہ یہی خوف ہے(سانپ والا خوف نہیں) یعنی یہ اللہ تعالیٰ کی ناراضگی کا خوف ہے۔
    معرفت کے نتیجہ میں جودوسری چیز پیدا ہوتی ہے وہ محبت ہے کیونکہ حُسن بھی نظر آیا اور احسان بھی۔ اللہ تعالیٰ قرآن کریم میں فرماتا ہے کہ اے میرے بندو! مَیں تم پر بے شمار نعمتیں نازل کرتا ہوں۔ موسلا دھار بارش کے قطرے گنے جاسکتے ہیں لیکن میری نعمتیں نہیں گنی جا سکتیں پس جب انسان کواللہ تعالیٰ کے حُسن واحسان کے جلوے نظر آجاتے ہیں تو وہ اللہ تعالیٰ کی صحیح اور کامل اورحقیقی شناخت پالیتا ہے اور اللہ تعالیٰ سے اس کا تعلق پیدا ہوجاتا ہے پھر وہ اس چیز سے دوربھاگتا ہے جو اللہ تعالیٰ کوناراض کرنے والی ہوتی ہے اور ہر اس چیز سے پیار کرتا ہے جس کے نتیجہ میں اسے اللہ تعالیٰ کا پیار حاصل ہوتا ہے پھر وہ اللہ تعالیٰ کی طرف صحیح معنوںمیں مائل ہوتا ہے اور اللہ تعالیٰ کی رضا اور اس کی محبت کو حاصل کرتا ہے اس طرح اس کا اللہ تعالیٰ سے ایک زندہ تعلق قائم ہوجاتاہے اوریہ نجات ہے اسی میںدائمی خوشحالی اور مسرت ہے۔
    پس افریقہ میں لڑی جانے والی جنگ کو جیتنے کے لئے ہم پر بہت ذمّہ داری عائد ہوتی ہے۔ اس سلسلہ میں بہت ساری باتیں مَیں پہلے بیان کرچکاہوں مثلاًنصرت جہاں ریزروفنڈ قائم کیا گیا ہے ہمیں ڈاکٹروں کی ضرورت ہے ہمیں ٹیچرز کی ضرورت ہے ڈاکٹروں اورٹیچروں کورضا کارانہ طورپرخدمات پیش کرنے کی جو میں نے تحریک کی تھی اس سلسلہ میں شاید ایک بات رہ گئی تھی وہ یہ ہے کہ ہمیں ایسے ڈاکٹروں کی بھی ضرورت ہے جن کی بیویاں بھی ڈاکٹر ہوںاور ایسے ٹیچرز کی بھی ضرورت ہے جن کی بیویاں بھی وہاں کام کرسکیں یعنی وہ بھی بی۔اے، بی ایڈ یا بی۔ ایس سی، بی ایڈ ہوں کیونکہ وہاں بعض جگہیں ایسی بھی ہیں جہاں مسلمان لڑکی تعلیم میں بہت پیچھے ہے اور پردے میںغلو کررہی ہے۔ اس لحاظ سے تو اچھا ہے کہ وہاں بے پردگی نہیں اور بے پردگی سے پردہ میں غلو اچھا ہے لیکن اس کا نتیجہ یہ نکلا ہے کہ وہاں کی مستورات علم سے (اورعلم دراصل خدا تعالیٰ کی صفات کے جلوے ہیں اور ان سے وہ) محروم ہیں۔ ہماری طرف سے یہ کوشش ہورہی ہے کہ ایسے علاقوں میں باپردہ پڑھائی کا انتظام کیا جائے تاکہ اگلی نسل کی بچیوں کو ہم علم کے نور سے منور کرسکیں۔ہمیں بڑی دعائیں کرنی چاہئیں کیونکہ اللہ تعالیٰ کے فضل کے بغیر تو کچھ ہو نہیں سکتا۔ جب اللہ تعالیٰ فضل کرے اور اپنے پیار کا جلوہ دکھائے تو دنیا کی کوئی طاقت اسے روک نہیں سکتی۔ میں وہاں پانچ ہیڈزآف دی سٹیٹس سے ملاہوں۔ مَیں ایک غیرملکی نہ میری ان سے جان نہ پہچان مگر انہوں نے مجھ سے بے حد پیار کیا۔ ان پانچ میں سے تین توعیسائی تھے باقی دو غیر احمدی مسلمان تھے لیکن مجھ سے اس طرح ملتے تھے جیسے ان کا کوئی بزرگ ہو۔ مَیں دل میں حیران بھی ہوتا تھا اور الحمد للہ بھی پڑھتا تھا کہ میں تو بالکل عاجز اور ناکارہ انسان ہوں یہ خدا تعالیٰ کی شان ہے۔ ایک جگہ ایک آرچ بشپ نے شروع میں تھوڑی سی شوخی کی تھی(اس کی تفصیل بڑی لطیف ہے بعد میں کسی وقت بتائوں گا) لیکن اللہ تعالیٰ نے اس کے دماغ پر ایسا رُعب ڈالا کہ واپسی پر مصافحہ کرتے وقت اس طرح جھک گیا جس طرح اپنے بشپ کے سامنے جھُک رہاہو۔ اس وقت بھی میرے دماغ میں یہی آیا کہ تثلیث توحیدکے سامنے جھکی ہے یہ خیال نہیں پیدا ہوا کہ یہ شخص میرے سامنے جھکا ہے۔ میں تو ایک عاجز انسان ہوں میں نے اس سے اللہ تعالیٰ کی توحید کے موضوع پرباتیں کی تھیں جس سے وہ اتنا مرعوب ہوا کہ چلتے وقت اُسے جھکنا پڑا پس اللہ تعالیٰ تو بے حد فضل کرنے والا ہے۔ ہمیں یہ معلوم کرنا چاہئے کہ معرفت یعنی اللہ تعالیٰ کی قدرتیںکیا ہیں؟ احمدیت کی زندگی کی یہ حقیقت ہے کہ اللہ تعالیٰ بے حد رحم کرنے والا ہے وہ بڑا پیار کرنے والا اوراپنی بے شمار نعمتوں سے نوازنے والا ہے اگرہم پھر بھی الحمدللہ نہ کہیں تو ہم بڑے ہی بدقسمت ہوں گے۔ پھر تو وہ آگے جائیں گے جو الحمدللہ کہنے والے ہوں گے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں سمجھ عطا کرے اور ہماری نسلوں کی صحیح تربیت کی ہمیں توفیق دے اور ہمیں یہ بھی توفیق دے کہ ہم ہمیشہ سابقون میں رہیں کسی سے پیچھے نہ رہ جائیں۔(آمین)
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۲۰؍اگست ۱۹۷۰ء صفحہ ۲ تا ۷)
    ززز








    غلبۂ اسلام کے دن مجھے
    افق پر نظرآرہے ہیں
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۱۰؍ جولائی ۱۹۷۰ء بمقام اسلام آباد)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    آپ دوستوں کی یہ خواہش ہوگی کہ میں اپنے دورہ کے متعلق کچھ باتیں کہوں اورآپ میرے منہ سے وہ باتیں سنیں۔ بہت کچھ تو آپ رپورٹوں میں پڑھ چکے ہیں واقعات اور حالات کا یہ قریباً بیسواں حصہ ہوگا،کچھ تھوڑا بہت میں نے اپنے گذشتہ تین خطبات میںبیان کیا ہے۔ یہ خطبات انشاء اللہ چھپ جائیں گے اورآپ انہیں بھی پڑھیں گے۔ بہت سی باتیں ایسی ہیں کہ جو دیکھنے سے اور محسوس کرنے سے تعلق رکھتی تھیں ان کا بیان ممکن نہیں لیکن حِس اور جذبہ کی جن تاروں کو ان واقعات نے جنبش دی وہ حرکت احساس میں اورجذبات میں سالوں سال قائم رہے گی۔ اس وقت میں مختصراً چند عمومی باتوں کا ذکر کرنا چاہتا ہوں۔ پہلی بات تویہ ہے کہ میںنے ان اقوام کو کیساپایا؟ جہاںتک میں نے غور کیا اورجہاںتک میرے مشاہدہ میںآیا ہے وہ یہ ہے کہ وہ اقوام بڑی شریف النفس سعید الفطرت اور سادہ مزاج ہیں ان کے معاشرہ کے بعض پہلو ہم پاکستانیوںکے لئے بھی قابلِ رشک ہیں مثلاً وہاں افسر اورماتحت میں اتنی دُوری نہیں جتنی کہ ہمیں یہاں نظر آتی ہے بعض دفعہ جب ہم بڑے بڑے افسروں سے ملنے جاتے ہیں تو نسبتاً جونیئر افسر ہمارے وفد میں شامل ہوتے وہ بے دھڑک وہاں پہنچتے اور ذرا ذرا سی بات کا اس طرح خیال رکھتے جس طرح اس دفتر میں انہی کی حکومت ہو اور ہیڈ آف دی سٹیٹ سے بھی بڑے دھڑلے سے ملتے۔ وزراء کا یہ حال ہے کہ مجھے ایک پرنسپل نے بتایا کہ جب سکول میںداخلے کے دن ہوتے ہیں تو بعض دفعہ ایک ایک دن میں چھ چھ وزیر میرے پاس بعض بچوں کی سفارش لے کر آتے ہیں۔ نائیجیریا میں مَیں نے سکوتو کے گورنر (سکوتو،نارتھ ویسٹ سٹیٹ ہے یعنی شمال مغربی صوبہ اسے انہوں نے سٹیٹ کہا ہے نئے Constitution(آئین) کے مطابق انہوںنے اپنے ملک کو بارہ صوبوںمیں تقسیم کردیا ہے۔ یہ سکوتو مسلمانوں کاعلاقہ ہے) کے پاس جس دوست کو بھیجا تھا وہ کیبنٹ سیکرٹریٹ میں ڈپٹی سیکرٹری تھے۔ چنانچہ وہ بڑے دھڑلے سے گئے اور گورنر سے گفتگو کی اور میری تجویز کو ان کے سامنے ایسے انداز میں پیش کیا کہ وہ گورنر صاحب بڑے خوش ہوئے اور انہوںنے ہماری پیش کش کوجو دراصل انہی کے فائدے کے لئے تھی قبول کرلیا اور اب جو رپورٹ مجھے موصول ہوچکی ہیں ان کے مطابق انہوں نے ہمارے سکولوں کے لئے ۴۰۔۴۰ ایکڑ زمین بھی دے دی ہے۔ فالحمدللّٰہ علی ذالک۔
    غرض یہ بُعد جو افسر اور ماتحت کا ہمیں یہاں نظرآتا ہے وہ مغربی افریقہ کی ان اقوام میں مجھے نظر نہیں آیا۔ ہم جبReception(ری سیپشن) میں جاتے تھے تو وزراء اور کمشنرزیاڈی سی (وہ مختلف نام استعمال کرتے ہیں) آپس میںاس طرح گھلے ملے ہوتے تھے کہ آپ پتہ نہیں کرسکتے تھے کہ کون منسٹر ہے اور کون چھوٹا افسر ہے۔ وزراء کے علاوہ ہر دفعہ وہاں کے Ambassador(سفیر) بھی ہوتے تھے۔ بڑے بڑے امیر بھی ہوتے تھے،بڑے اثرورسوخ والے سیاسی لیڈر بھی ہوتے تھے اور سب وہاں اس طرح گھوم رہے ہوتے تھے کہ کسی آدمی کو جوباہر سے گیا ہوذاتی طورپر ان سے واقف نہ ہو یہ معلوم نہیں ہوسکتا تھا کہ یہ وزیر صاحب ہیں اور یہ حکومت کا ایک معمولی افسرہے یا یہ ملک کا ایک معمولی دکاندار ہے۔
    دوسری چیز جو مجھے وہاں نمایاں طورپرنظر آئی وہ یہ ہے کہ جوبُعد امیر اورغریب میںہمیں یہاں نظر آتا ہے وہاں نظر نہیں آتا۔ ایک تو بظاہر لباس کے لحاظ سے کوئی فرق نہیں ۔ جہاں تک صفائی کا تعلق ہے ایک چپڑاسی بھی اتنے ہی صاف کپڑوں میں آپ کو نظر آئے گا جتنے صاف کپڑوں میں ایک وزیر نظر آئے گا اور ویسے بھی کپڑوں میں بہت سادگی ہے ہمارے ملک میں توہزاروں لوگ ایسے ہیں جو چارپانچ سوروپے گز سے کم والے سوٹ کو پہننے کیلئے ذہنی طورپر تیار نہیں ہوتے اور اسی وجہ سے ہمارے معاشرہ میں بہت سا گند آکر شامل ہوگیا ہے البتہ مغربی افریقہ کے لوگوں کو جُبّے پہننے کا بہت شوق ہے اور رنگدار کپڑوں کے استعمال کامردوں کو بہت شوق ہے میںنے یہ بھی دیکھا ہے کہ ہمارے ملک میں عورتیں اتنے رنگ برنگے کپڑے نہیں پہنتیں جتنے کہ وہاں مرد پہنتے ہیں اور پھر نئے سے نئے ڈیزائن رنگ کے لحاظ سے پھولوں کے لحاظ سے ان کے جُبّوں پر نظرآتے ہیں۔ ایک دفعہ مجھے خیال آیا اور میں نے اس بارہ میں غور کیا۔ ہم موٹر پر جارہے تھے۔ مجھے میل دومیل کے اندر سینکڑوں جُبّے نظرآئے مگر ان میں سے کوئی دوجُبّے ایک رنگ کے نہیں تھے۔ پتہ نہیں وہ کس طرح اتنے مختلف ڈیزائن بنا لیتے ہیں۔ وہ بہرحال بناتے ہیں کیونکہ یہ وہاں کی مانگ ہے۔ ویسے جب وہ جُبّہ بدلتے ہیں تو ان کی شکلیں بھی بدل جاتی ہیں۔ ہم پہچان نہیں سکتے تھے کہ کیا یہ وہی شخص ہے جو کچھ دیر پہلے تھا جس نے کپڑے بدل لئے اور اب کچھ اور لگتا ہے میں اس سلسلہ میں آپ کو ایک لطیفہ بھی سنا دیتا ہوں۔
    ہم نے جس روز اجے بواُوڈے جانا تھا اس سے پہلی رات ہمارے ایمبیسیڈرکے ہاں ہمارا کھانا تھا۔ ان کی بیوی نے پتہ نہیں کیوں منصورہ بیگم سے کہا کہ یہ علاقہ بڑا خطرناک ہے آپ کو دیر ہوجائے گی۔ آپ کوشش یہ کریں کہ سورج غروب ہونے سے قبل واپس لیگوس پہنچ جائیں۔ غرض اس نے وہاں کے حالات کا اچھا خاصا بھیانک نقشہ کھینچا جو میرے نزدیک غلط تھا۔ بہر حال جب انہوںنے یہ کہا اور مجھے اس کا پتہ لگا تو میں نے اپنی جماعت سے کہا کہ ہمارے احمدی پولیس افسر بھی ہوںگے اور فوجی افسر بھی ہونگے، کسی کو کہیں کہ وہ ہمارے ساتھ چلے۔ چنانچہ انہوںنے ایک میجر کی ڈیوٹی لگائی۔اس نے کہا کہ میں اپنے دفتر کاکام ختم کرکے دوپہر کے بعد اپنی آرمڈیونٹ لے کر پہنچ جائوں گااورواپسی پر آپ کے ساتھ آئوں گا۔ کوئی۷۰۔۸۰ میل کے فاصلے پر وہ جگہ تھی۔ چنانچہ وہ وہاں پہنچے اور جب مجھ سے ملے تو وہ یونیفارم میں تھے جب ہم واپس لیگوس اپنے ہوٹل میں پہنچے تو وہ مجھے نظر نہ آئے۔ میں نے سمجھا شاید انہوں نے جلد اپنی ڈیوٹی پر پہنچنا ہو اور وہ راستے سے ہی اپنی بیرک میں چلے گئے ہوں۔ میں نے دوستوں سے پوچھا کہ ہمارے میجر صاحب ہمارے ساتھ تھے کیا وہ راستے ہی سے چلے گئے ہیں کیا بات ہے؟ وہ کہنے لگے کہ یہ پانچ قدم پر آپ کے سامنے کھڑے ہیں ہوا یہ تھا کہ موٹر ہی میں انہوںنے اپنی یونیفارم اُتار کر اپنا جُبّہ پہن لیا تھا اور اس سے ان کی شکل بھی بدل گئی تھی ممکن ہے کہ اس طرح ایک غیر ملکی کیلئے انہیں پہچاننا آسان نہ ہو لیکن میرا تو خیال ہے کہ بحیثیت مجموعی ان کی شکلیں بھی بدل جاتی ہیں کیونکہ انسان کی شکل صرف اسکے چہرے کے فیچرز یعنی نقوش ہی نہیں ہوتے بلکہ اس کا لباس ہے اور اسکی طرز ہے ان ساری چیزوں کے ملنے سے دماغ میں کسی شخص کی شکل کا ایک تصور قائم ہوتا ہے۔
    بہر حال امیر اور غریب میں جو بُعد یہاں پایا جاتا ہے، اور جوتفریق یہاں پائی جاتی ہے وہ ان ملکوں میں نہیں پائی جاتی۔ میںنے پہلے بھی ذکر کیا ہے کہ ہماری جس احمدی بہن نے اکیلے پندرہ ہزار پائونڈ سے زیادہ خرچ کرکے اجے بواوڈےؔ میں مسجد تعمیر کروائی ہے جس کا میں نے افتتاح کیا تھا وہ ہماری بہت بڑی جامع مسجد ہے۔ میں نے وہاں یہ دیکھا کہ ان کیلئے اور عام مزدور یا جو ان کی وہاں نوکرانیاں تھیں؛ ان کے لئے جو کھانا پک رہاتھا وہ مختلف نہیں تھا بلکہ ایک ہی کھانا تھا جس میں وہ بھی شامل ہوئی ہوں گی۔ انہوں نے میرے سامنے تو نہیں کھایا البتہ میرا اندازہ تھا کہ کوئی الگ کھانا نہیں پک رہا چنانچہ میں نے اس کے متعلق دریافت کیاتو میراخیال درست تھا معلوم ہوا کہ ایک ساتھ اکٹھے کھانے پر بیٹھ جاتے ہیں اور ان کا آپس میں کوئی فرق نہیں ہوتا اور اس کا نتیجہ یہ ہے کہ جو بعض دفعہDiscontentment(بے اطمینانی) اور بددلی ہمیں یہاں نظرآتی ہے وہاں یہ نظر نہیں آتی۔
    بڑا عجیب نظارہ ہے میں نے پہلے بھی بتایا ہے کہ ایک دن بہت مصروف پروگرام تھا۔ہم نے ایک جگہ سے دوسری جگہ موٹروں پر جانا تھا میں نے دوستوں سے کہا کہ ایک تو پیار ہمیشہ کامیاب ہوتا ہے دوسرے مسکراہٹ کا جواب ہمیشہ مسکراہٹ سے ملتا ہے اور میںآج یہ کرتا رہا ہوں۔ میرا اندازہ یہ ہے کہ میں نے لیگوس کے باشندوں سے کم ازکم پچاس ہزار مسکراہٹیں وصول کیں اور کسی جگہ میں نے مایوسی افسردگی اور بے زاری یاDiscontentment(بے اطمینانی) نہیں پائی۔ وہ سب بڑے خوش اور ہشاش بشاش دکھائی دیتے تھے حالانکہ وہ ابھی سول وار جیت کر ہٹے تھے اس کے سکارز(Scars) کہیں تو نظر آنے چاہئے تھے مگر کہیں بھی نظر نہیں آئے اور میں سمجھتا ہوں کہ اس کی بڑی وجہ یہ ہے کہ جب امیر اور غریب ایسے ہوں کہ ان کے رہن سہن میں زیادہ فرق نہ ہوایک دوسرے سے نفرت کا اظہار نہ ہو تکبّر اور غرور نہ ہوتو وہ قوم خوشی اور بشاشت کی زندگی گزار رہی ہوتی ہے۔ اللہ تعالیٰ انہیں اس چیز پر بھی استقامت بخشے اور باہر کے غیر ملکی گندے اثرات ان کے معاشرہ کوگنداکرنے میںکامیاب نہ ہوں جیسا کہ نائیجیریا کو تباہ کرنے کے لئے کوششیں کی گئی تھیں مگر اللہ تعالیٰ نے اس میں مُفسد دنیا کوکامیاب نہیں ہونے دیا۔
    جب میں یعقوبوگوون سے ملا ہوں تو اللہ تعالیٰ نے اس کے دل پر کچھ ایسا تصرف کیا تھا کہ وہ میرے ساتھ نصف گھنٹے تک اس طرح بیٹھا رہا کہ جس طرح اس کے گھر کاایک فرد ہو وہ بڑی بے تکلفی سے باتیں کرتا رہا امریکن اور یورپین اقوام جو وہاں فساد پیدا کرنا چاہتی تھیں وہ ان پرجو تنقید کررہا تھا وہ توکرہی رہا تھا مجھے اس نے یہ بھی کہا کہ غیر ملکی عیسائی مشنز (خودوہ عیسائی ہے) نے پورا زور لگایا کہ ہمارے ملک کو تباہ کر دیں لیکن اللہ تعالیٰ نے فضل کیا، ہمارا ملک تباہ ہونے سے بچ گیا میںنے اس سے کہا کہ تمہاری قدر میرے دل میں اس لئے بھی ہے (ویسے میں نے اسکے متعلق اور بھی بہت سی معلومات حاصل کی تھیں وہ بڑے ہی اچھے دل کا مالک ہے) کہ میں پورے غور سے عوام کو سڑکوں اوردکانوں کے سامنے دیکھتا رہاہوں مگر میں نے کسی جگہ بھی یہ محسوس نہیںکیا کہ تمہاری خانہ جنگی کا قوم پر کوئی اثر ہو۔ ویسے تو وہ ہرایک کا خیال رکھتا ہے اس کی حالت یہ تھی کہ میں نے اسے یہ کہا کہ دیکھو! تم نے سول وار جیتی ہے اور یورپین اقوام کی مخالفت اورمداخلت کے باوجود جیتی ہے یہ تمہارا بڑا کارنامہ ہے تمہارے کندھوں پر بڑا بوجھ آپڑا تھا لیکن اس سے بھی زیادہ اہم اور ضروری اور مشکل کام اب تمہیں کرنا ہے اور وہ یہ ہے کہ تم نے بیافرا کو ویسے توجنگ کے ذریعہ جیت لیا ہے لیکن ان کے دلوں کو جیتنا ابھی باقی ہے اس لئے کوئیHeat generate(ہیٹ جنریٹ) نہیں ہونی چاہئے اُن کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آئو اور ان کے ساتھ پیار کا معاملہ کرو۔ چنانچہ اس نے میری اس نصیحت کوبڑی بشاشت سے سنا اور مجھے کہنے لگا کہ مجھے اس وقت کا خود بھی خیال ہے میں ان سے یہی سلوک کروںگا۔ وہ میرا بڑاممنون تھا۔
    چونکہ ان کامعاشرہ بہت سے گندوں سے محفوظ ہے اس لئے آپ کو ہنستے کھیلتے چہرے نظر آئیںگے ،بڑے ہشاش بشاش، کوئی شکایت نہیں، کوئیDiscontentment (بے اطمینانی) نہیں، کوئی بددلی نہیں، کوئی اداسی نہیں، کوئی یہ خیال نہیں کہ انہیں حقیر سمجھا جاتا ہے آپس میں ایک دوسرے کو حقارت اور نفرت کی نگاہ سے نہیں دیکھتے اور یہی پیغام میں لیکر گیا تھا۔ اس واسطے ان کو اس نے اپیل کیا۔
    میں نے ایک دن انہیں یہ بھی کہا کہ میں آج تمہیں یہ بتاتا ہوں کہ تمہاری عزت اور احترام کا دن طلوع ہوچکاہے اب دنیا تمہیں نفرت اور حقارت کی نگاہ سے نہیں دیکھے گی۔ میرے ذہن میں تویہ تھا کہ ان کی عزت اور احترام کو قائم کرنے کیلئے اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو مبعوث کیا۔ اس لحاظ سے ہم اُن کے محافظ ہیں اُن کی عزت واحترام کے، اورہم محافظ ہیں ان کی جانوں اور مالوں کے، اورہم محافظ ہیں شیطانی یلغاروں سے انہیں بچانے کے یعنی شیطان سے بچانے کا جو کام ہے وہ ہمارے سُپرد ہے اورجو ان کی ضرورتیں ہیں وہ حتی الوسع ہم نے پوری کرنی ہیں۔
    حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ نے میں سمجھتا ہوں اس وقت کے حالات کے مطابق اللہ تعالیٰ کے علم سے یہ اعلان کیاتھا کہ افریقہ کو اللہ تعالیٰ نے اسلام کے لئے محفوظ رکھا ہوا ہے اور یہ اب نظر آرہا ہے کہ اگر ہم اپنی ذمہ داریوں کو نباہیں تو وہ لوگ بہت جلد اسلام کو، احمدیت کو قبول کرلیں گے اورپھر اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق دے گا Sweet revenge(سویٹ ریوینج)کی۔ میں آپ کو کہتا تھا ہم نے ایک حسین انتقام ظالموں سے لینا ہے۔ وہاں ہمارے عبدالوہاب ہیں جامعہ سے پڑھ کرگئے ہیں بڑے مخلص اور بڑے مستعداور ہمت والے مبلّغ ہیں۔ وہ نہایت اچھا کام کررہے ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں بیوی بھی بڑی اچھی دی ہے، اس کے دل میں بھی اسلام کا درد اور احمدیت کا پیار ہے۔وہ سارا دن بچے اور بچیوں کو قرآن کریم پڑھانے میں مشغول رہتی ہیں۔ ان کے علاقے میں جاکر اوریہ حالات دیکھ کر مجھے بہت ہی خوشی ہوئی ۔ میں نے عبدالوہاب سے کہا کہ تیارہوجائو، ہمارے حسین انتقام کے دن قریب آرہے ہیں اور میں نے وہاں اعلان کردیا کہ میں نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ میںزندہ رہا تومیں یامیرے بعد جو بھی ہوگا وہ تمہیں گلاسکومشن کا انچارج بناکر بھیجے گا۔ وہ قومیں جو صدیوں تک تم پر ظلم کرتی رہی ہیں انہیں یہ پتہ لگنا چاہئے کہ تم لوگ اس قابل ہو کہ دین کے میدان میں پیار کے میدان میں اور محبت کے میدان میں اور ہمدردی اور غم خواری کے میدان میں،خدمت کے جذبہ کے میدان میں اورمساوات کا پیغام دینے کے میدان میں تم ان کے استاد بنوگے انشاء اللہ۔ ان سے میں نے کہہ دیا کہ تم چار سا ل کے بعد ربوہ آئو گے اور یہاں اپنی انگریزی (ویسے تواچھی خاصی جانتے ہیں) اور زیادہ improve(بہتر) کروگے اور پھریہاں سے تمہیں گلاسکو بھیج دیں گے ان کے ملک کوبھی میں نے کہہ دیا ہے کہ ہمارا تو یہ پروگرام ہے۔
    ہمارے ایک بڑے مخلص افریقن کماسیؔ میں جوغانا کا ایک مشہور شہر ہے۔ ہمارے ایک سکول کے ہیڈماسٹر ہیں وہاں کے ملک کی یہ پالیسی ہے اور یہ درست ہے کہ جو استاد یا پرنسپل انہیں افریقی ملے گا اس کی جگہ وہ غیر ملکی کونہیں رکھیں گے چنانچہ شروع میں ہمیں یہ خیال تھا کہ کہیں اس کا ہمارے سکولوں پربُرا ثر نہ پڑے لیکن چونکہ وہاں کا معاشرہ کچھ اوررنگ رکھتا ہے عملاً یہ ثابت ہوا کہ کوئی بُرا اثر نہیں پڑا لیکن خدا کا کرنا یہ ہوا کہ ہمارے کماسی کے اس نہایت اعلیٰ اور مقبول اور بہت ہی کامیاب سکول (جوہمارے انٹر میڈیٹ کالج کے برابر ہے) کا جو افریقی پرنسپل مقرر کیا گیا وہ ایک احمدی تھا اس سے بھی میں نے کہا کہ تم بھی تیار ہوجاؤ ممکن ہے کسی دن میں تمہیں پاکستان میں بلا کر یہاںکے کسی سکول کا ہیڈ ماسٹر بنادوںکیونکہ جہاںتک احمدیت کا تعلق ہے کسی ایک ملک یا کسی ایک قوم کی اجارہ داری نہیں ہے۔’’اِنَّ اَکْرَمَکُمْ عِنْدَاللّٰہِ اَتْقٰـکُمْ‘‘(الحجرات:۱۴) میں ’’کُمْ‘‘کے مخاطب پاکستا نی نہیں یا صرف پہلے عرب نہیں تھے۔ بلکہ ہر انسان اس کا مخاطب ہے جو بھی تقویٰ میں آگے نکل جائے گاخواہ وہ فرد ہو یا قوم اللہ تعالیٰ کو وہ دوسرے فردیا قوم سے زیادہ پیارا ہو گا اور جو آگے نکل گئے ہیں اپنے خلوص اور قربانیوںمیں،بہرحال ہمارا یہ کام ہے جماعت احمدیہ کے خلفاء کا یہ کا م ہے کہ ان کو دوسروں کی نسبت زیادہ عزت اور احترام دیں، پس وہ بھی یہاں آئیںگے جس طرح ہم یہاں سے مبلّغ اور پرنسپل وہاں بھجوارہے ہیں وہاں کے لوگ یہاں آئیں گے اورپھر دوسرے ملکوں میں جائیںگے۔ ساری دنیا کو پتہ لگے گا کہ وہ حسین معاشرہ پھر دنیا میں قائم ہونا شروع ہوگیا ہے۔ جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے زمانہ میں اور پھر جب اسلام غالب آیا توساری دنیا میں قائم کیا تھا۔ ہماری اسلامی تاریخ میںمیرے خیال میں درجنوں ایسے بادشاہوں کے خاندان ہوں گے جو حبشی غلاموں سے تعلق رکھتے تھے۔ مثال تو اس وقت میں(وقت کی رعایت سے) جوبہت ہی حسین اور نمایاںہے وہ دیتا رہا ہوں۔ تین چار موقعوں پر حضرت بلال رضی اللہ عنہ کی مثال میں نے بیان کی ویسے حضرت بلالؓ کے ساتھ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اوربھی پیار کے سلوک کئے ہیں۔ وہ بھی بڑی حسین مثالیں ہیں اگر اللہ تعالیٰ نے پھر کبھی توفیق دی اور وہاں جانے کا موقعہ ملا تو اور بہت ساری مثالیں دے دیں گے اس دنیا میں اور اس وقت بھی میرے خیال میں پاکستان کے بہت سے سمجھتے ہوں گے کہ انسان، انسان میں فرق ہے۔ اسلام تو انسان انسان میں فرق مٹانے کے لئے آیا تھا۔ قائم کرنے یا قائم رہنے دینے کیلئے نہیں آیا تھا ایک حبشی اپنے تصور میں لے آئو جس قسم کا وہ ہوتا ہے(ویسے عملاً وہ ویسا ہی ہوتا ہے) یہاں انگریزنے ہمارے بچپن میںجو تصور دیا تھا وہ یہ تھا کہ حبشیوں کے ہونٹ لٹکے ہوئے اور نچلا ہونٹ ٹھوڑی کے کنارے تک پہنچا ہوا اور آنکھیں سرخ ہوتی ہیں جس طرح کی شکل وہ شیطان کی بناتے تھے اسی طرح کی شکل حبشی کی بھی بنا دیتے تھے مگروہاں ایسا نہیں۔ الَّا مَاشَائَ اللّٰہ بعض اس سے ملتی جلتی شکلیں تو ہیں لیکن اتنی بھیانک نہیں ہیں ان کے بڑے تیکھے نقوش(اور اسوقت جودوست میرے سامنے بیٹھے ہیں عام طور پر ان سے ملتے جلتے چہرے) ہم نے وہاں دیکھے ہیں خصوصاً احمدیوں میں اور پھر دوسرے مسلمانوں میںاس قسم کے بھدّے اور ڈرائونے نقوش نہیں ہیں البتہ عیسائیوں میں مجھے کہیںکہیں نظر آئے ہیں۔ پتہ نہیں اس میں کیا حکمت ہے؟
    بہرحال ایک حبشی جو مکہ کے پیرامائونٹ چیفس کا غلام تھا۔ اور وہ اسکے ساتھ نفرت اور حقارت کے ساتھ پیش آتے تھے ان کے دلوں میں اس کی کوئی عزت نہیںتھی کسی قسم کی عزت کا اظہار ان سے نہیں ہواکرتا تھا۔پھر خدا کاکرنا کیا ہوا کہ یہی حبشی غلام جوان کی نگاہوں میں بڑا ذلیل تھا اللہ تعالیٰ نے اسے نور دکھایا اور وہ اسلام لے آیا۔ پہلے صرف نفرت اور حقارت تھی اب نفرت اور حقارت کے ساتھ ظلم بھی ہوگیا اُنہوں نے اس کو اس طرح اذیت پہنچائی کہ آج بھی ہم سوچتے ہیں تو ہمارے رونگٹے کھڑے ہوجاتے ہیں۔ پھر ایک مسلمان کو خیال آیا اس نے اسے خرید کر آزاد کردیا اور وہ مسلمان معاشرہ کاایک فردبن گیا۔ مسلمان معاشرہ کا فرد تو ویسے اسلام لانے کے بعد ہی بن گیا تھا مگر غلامی کی زنجیروں کی وجہ سے عملاً مسلمان معاشرہ کا فرد نہیں بن سکا تھا۔ پھر وہ بڑے سے بڑے مسلمان گو اس وقت چند ایک ہی سہی کیونکہ اس وقت رؤسائے مکہ میں سے چند ایک مسلمان ہوچکے تھے، ان کے برابر ہوگیا اوروہ عملاً ان کی زندگیوں کے برابر تھا کوئی فرق نہیں تھا۔ پھر خدا تعالیٰ نے فتح مکہّ کے موقع پر انسانیت کو وہ عظیم نظّارہ دکھایا کہ دنیا کی تاریخ جس کی مثال نہیں لاسکتی۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک جھنڈا تیار کروایا(میںنے تصور کی نگاہ سے وہاں کا نقشہ اپنے ذہن میں لانے کی کوشش کی ہے) لوگ حیران ہوتے ہوں گے کہ ایک نیا جھنڈا کیوں تیار کروایاجارہاہے۔ بہرحال ایک جھنڈا تیار کروایا اور فرمایا یہ بلال کا جھنڈا ہے۔ آپ نے اس جھنڈے کو بلال کا نام دیا اور ایک جگہ اسے نصب کروادیا اورپھر انہی رؤسائے مکہّ کو فرمایا کہ جس شخص کو تم نفرت اورحقارت سے دیکھا کرتے تھے اور جس پر تم ظلم ڈھایا کرتے تھے آج اگر پناہ چاہتے ہوتو اس کے جھنڈے کے نیچے آجائو یہ ایک مثال ہے جو درجنوں مثالوں میں سے نظر آتی ہے۔ ہمارا یہ دعویٰ کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے لئے اسوۂ حسنہ ہیں تبھی کسی حقیقت اور صداقت کا حامل بن سکتا ہے اگرہم اس کے مطابق عمل کریں تاہم اس حصہ کو میں بعدمیں لوں گا۔ غرض آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ اسوہ حسنہ میرے سامنے تھا چنانچہ ان کے سامنے جب میں یہ بات بیان کرتاتھا مختلف موقعوں پر مختلف لوگوں کے سامنے کیونکہ ملک بھی دوسرا ہوتا تھا اور جگہ بدلنے سے۹۹فیصد جو اس جلسے میں ہوتے تھے وہ بھی مختلف ہوتے تھے بلامبالغہScientific Explanation(سائنٹیفک ایکس پلے نیشن) تو میرے ذہن میں نہیںآیا لیکن میں نے محسوس کیا کہ ان کی خوشی صوتی لہروں میں بھی ایک ارتعاش پیداکرتی تھی بغیر آواز کے اور میرے کانوںنے ان کی خوشی کی لہروں کو محسوس کیا اور اس کا اثر صرف مسلمانوں پرہی نہیں ہوتا تھا ان کو توتھوڑا بہت پہلے سے علم ہے عیسائی بھی متاثر ہوتے تھے اور وہ مشرک اور بدھ مذہب جن میں ابھی تک بڑی ظالمانہ رسوم رائج ہیں وہ بھی سنتے تھے کہ اسلام کا پیش کردہ صداقت اورمحبت اور پیار اور ہمدردی اور غم خواری اور خدمت اور سلام مساوات کا یہ اعلان ہے اور یہ سلوک ہے تو اثر قبول کئے بغیر نہیں رہ سکتے تھے غرض کیا عیسائی اور کیا مشرک اور بدھ مذہب جب ہماری ان باتوں کو سنتے تھے تووہ اتنا اثر قبول کرتے کہ ہم اس کا تصور بھی نہیں کر سکتے۔
    ٹیچی مان میں عبدالوہاب بن آدم ہمارے مبلّغ ہیں جو انشاء اللہ گلاسکو میں جا کر وہاں کے انچارج مشن بنیںگے وہ بڑا اچھا کام کررہے ہیں۔وہاں ہم گئے تھے انہوں نے وہاں بہت بڑی مسجد بنوائی ہے جو آپ کا نقشہ ہے اس مسجد کا اس سے چار گنا بڑی ہے۔ میں نے اس کا افتتاح کرنا تھا دوستوں سے ملنا تھا وہاں اللہ تعالیٰ کا فضل ہے جماعت کا اتنارعب ہے کہ بڑے بڑے پادریوں کو بھی مجبوراً ہمارے جلسوں میں شامل ہونا پڑتا ہے کچھ تو انہوں نے یہ دیکھنا ہوتا ہے کہ یہ کام کیا کررہے ہیں؟ اور کس طرف ان کا رُخ ہورہا ہے؟ غرض اس جلسہ میں جو پادری آئے ہوئے تھے ان میں اس سارے علاقے کے کیتھو لک مشنز کا انچارج بشپ بھی موجودتھا۔ لیکن بیٹھا شروع میں اس طرح تھا کہ جیسے اسے کوئی دلچسپی نہیں ہے مجبوری تھی شامل ہوگیا ایک موقعہ پر تقریر کے دوران میں مَیں نے کہاOne who was paramount prophet.
    (پیرامائونٹ چیف ان کا محاورہ ہے میں نے ان سے عاریتہ لے لیا) یعنی محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وہ تمہارے کان میں یہ کہہ رہے ہیں کہ اِنَّمَآ اَنَا بَشَرٌمِّثْلُکُمْ (حٰم السجدہ:۷) میں تمہارے جیسا انسان ہوں،تم میرے جیسے انسان ہو۔ بشرہونے کے لحاظ سے مجھ میں اور تم میں کوئی فرق نہیں تو پھر
    "Those who were junior to him like moses and christ."
    وہ بھی انسان ہی تھے ۔ اس لحاظ سے وہ تم پر کیسے برتری کادعویٰ کرسکتے ہیں؟ وہ پادری صاحب اُچھل کر بیٹھ گئے کیونکہ انہیںپتہ تھا کہ لوگ اس سے متاثر ہوں گے۔پس میں نے ان کو بڑا شریف النفس، سعید الفطرت اورسادہ مزاج پایا اورمیں نے ان کو جو دیا وہ اسلام کا یہ پیغام تھا کہ اِنسان انسان میںکوئی فرق نہیںہے ہر ایک سے محبت کرنی چاہئے۔ اُردو میں جس معنی میں محبت کا لفظ استعمال ہوتا ہے اس معنے میں مَیں اس کواستعمال کررہا ہوں کیوںکہ میں اردو میں بات کررہا ہوں(عربی میںایک اور معنے میں استعمال ہوتا ہے وہ یہاں استعمال نہیں ہوسکتا) جس کو ہم پیار اور محبت کہتے ہیں۔ اسلام کا وہ پیغام ہے ہمدردی اور خیرخواہی اور مساوات کا کہ کوئی فرق نہیں کرنا۔ اپنے آپ کو کسی دوسرے انسان سے بڑا نہیں سمجھنا۔ یہ پیار مَیں ان کے پاس لے کر گیا تھا، یہ محبت میں ان کے پاس لے کر گیا تھا۔ ہمدردی اور غم خواری اور خدمت کا یہ جذبہ اور مساوات کا یہ اعلان میں ان کے پاس لے کر گیا تھا اوراس کے وہ حق دار تھے۔
    ابھی چند دن ہوئے مجھے عبدالواہاب ہی کا خط آیا ہے اس نے لکھا ہے کہ آپ نے احمدی غیر احمدی، بڑے چھوٹے، عیسائی اور مشرک ہرایک سے جس قسم کی شفقت کاسلوک کیا ہے اس کی یاد ہماری قوم کے دل سے نہیں مٹے گی۔ میں نے ان کو جوجواب دیاوہ یہ ہے کہ جو میں نے دیا وہ ان کاحق تھا ان کا جو حق تھا وہ میں نے انہیں دے دیا اس واسطے میں نے کیااحسان کیا میں سوچا کرتا تھا کہ میں بچوں کو جو پیار کرتا تھایہ ان کا حق تھا میںان کو دے رہاہوتا تھا اب پیار پر نہ دھیلہ خرچ ہونہ وقت خرچ ہو لیکن اتنا اثر ہوتا تھا کہ اگرآپ لاکھ روپیہ خرچ کردیں تو اس کا شاید اتنا اثر نہیں ہوگا وہ پیار کے بھوکے ہیں کیونکہ وہ صدیوں پیار کی آواز میں گم ہوکر غیر ملکوں کی توپوں کا نشانہ بن گئے تھے۔ میں نے بہت سے عیسائیوں کو کہا کہ میں یہ بات تسلیم کرتا ہوں(ضمناً میں یہ بتادوں کہ جو سچ ہے اسے بہرحال تسلیم کرنا چاہئے جوامرِ واقعہ ہے اس کو چھپانے کی ضرورت نہیں۔ غرض میںنے اُن سے کہا) کہ جب تمہارے ملکوں میں عیسائی پادری داخل ہوئے تو انہوں نے یہی نعرہ لگایا تھا کہ ہم عیسائیت کی محبت کا پیغام لے کر آئے ہیں۔ لیکن ان کے پیچھے پیچھے ان ممالک کی جہاں سے وہ آئے تھے۔ فوجیں تمہارے ملکوں میں داخل ہوئیں توپ خانے بھی ساتھ آئے، گو ان توپوں کے مونہوں سے پھول نہیں جھڑ تے تھے بلکہ گولے نکلے تھے اور پھر جس طر ح ان ملکوں نے تمہیںExpliot(ایکسپلائٹ) کیا اور پھر جس طرح تمہیں تباہ کیا اس کے متعلق مجھے کہنے کی ضرورت نہیں تم مجھ سے زیادہ جانتے ہو کیونکہ تم صدیوں سے اس ظلم کا شکار بنے رہے ہو۔اب میںمحبت کا پیغام لے کر آیا ہوں لیکن میں تمہیں یہ بتاتا ہوں کہ ہم قریباً پچاس سال سے تمہارے ویسٹ افریقہ میں کام کررہے ہیں اوراس عرصہ میں ہم نے کبھی تمہاری سیاست میں دلچسپی نہیں لی اور کبھی تمہاری دولت پر حریصانہ نگاہ نہیں ڈالی۔ ہم نے یہاں بہت کچھ کمایا جیسا کہ میں بتا چکا ہوں ہمارے کلینک وہاںبہت کماتے ہیں۔ کانو ؔمیں ہمارے کلینک کے پاس پندرہ ہزار پائونڈ زیادہ جمع ہوگیا تھا۔ ڈیڑھ دوسال ہوئے انہیں یہاں مرکز سے ہدایت کی گئی کہ اس رقم کو اسی ہسپتال کی عمارت پر خرچ کردو پہلے وہ کلینک تھا اب ایک نہایت شاندار ہسپتال بن گیا ہے چنانچہ اسی طرح کی بیسیوں مثالیں ہیں ہم نے ایک دھیلہ ان ملکوں سے باہر نہیں نکالا۔ میرے خیال میںاس وقت تک لاکھوں پائونڈ باہر سے لے جاکر ان ملکوں میں خرچ کرچکے ہیں وہاں کی حکومتوں کوبھی اس کا علم ہے اور وہاں کے عوام کو بھی اس کا علم ہے۔پس میں نے کہا کہ ہم پچاس سال سے تمہارے پاس ہیں اور جوبھی یہاں کمایا وہ تم پرخرچ کردیا باہر سے جوکچھ لائے وہ بھی تم پر خرچ کردیا۔ ہم نے تمہیں سچااور حقیقی پیار دیا اور اس کے متعلق تم سب کچھ جانتے ہو اور یہ چیز ان پراثر کئے بغیر نہیں رہتی تھی میں ان سب ملکوں میںاپنی طرف سے بعض چیزیں امتحاناًکیا کرتا تھا۔ ان میں سے ایک چیز یہ تھی کہ میں انہیں کہتا تھا تم سوچو اورمسلمان ہوجائو مگر کسی ایک نے مجھے یہ نہیں کہا کہ نہیں ہم مسلمان نہیںہوسکتے یا احمدی مسلمان نہیں ہوتے ہرایک نے یہی کہا ٹھیک ہے ہم سوچیں گے اور غور کریں گے اورپھر احمدیت اوراسلام کو قبول کرلیں ہم نے ان کے اوپر پیارکاہاتھ رکھا ہے اورپیار کی لَم￿س لَم￿س جو ہے اس کے وہ عادی ہو چکے ہیں۔ دوسروں کو وہ دیکھتے ہیں کہ یہ کتنا پیارکرتے ہیں ہماے مبلّغوں کی رپورٹ کے مطابق افریقن یہ سوچ ہی نہیںسکتے کہ دنیا میں کوئی ایسی قوم بھی پیدا ہوسکتی ہے جو ان کے بچوں کو پیارکرے اورمیں نے وہاں ہزاروں بچوں کو اٹھایا ان سے پیار کیا۔ویسے پانچ ،سات سال کے جوتھے انہیں بغیر اٹھائے جھک کر پیار کیا۔ یہ دیکھ کر ان کی عجیب حالت ہوتی تھی ایک قسم کے مست ہوجاتے تھے کہ یہ کیا ہورہا ہے؟ خیر وہاں جوہوا وہ توہوا مشرقی افریقہ کے ایک ملک زمبیا کے ایک وزیر انگلستان میں کسی کامن ویلتھ کانفرنسAttend(اٹنڈ) کرنے آئے ہوئے تھے۔ جس روز ہم وہاں سے پاکستان کے لئے روانہ ہورہے تھے اسی روز انہوںنے بھی روانہ ہوناتھا اور اتفاق کی بات ہے کہ اسی کمرہ میں وہ بھی اپنے جہاز کے انتظار میں بیٹھے ہوئے تھے جہاں ہم نے بھی اپنے جہاز کے انتظار میں بیٹھنا تھا۔ ان کے ساتھ زمبیا کے ہائی کمشنر اور ان کا آٹھ دس سال کا ایک بچہ بھی تھا۔ چنانچہ انہوںنے کہا ہم ملنا چاہتے ہیں۔ میں ان سے مِلا اور پانچ سات منٹ تک ان کے ساتھ باتیں کیں۔ پھروہ اپنی جگہ پر جاکر بیٹھ گئے میں اپنے دوستوں کے ساتھ آکر بیٹھ گیا ایک احمدی دوست کو خیال آیا وہ ایک پائونڈ کا نوٹ لے کر میرے پاس آگیا کہ اس پر دستخط کردیںمیں اسے اپنے پاس یادگار کے طور پررکھوںگا۔پھر اسے دیکھ کر ایک دوسرا آگیا اسی طرح آٹھویں، دسویں نوٹ پر دستخط کرکے جب میں نے سراٹھایا تووہ آٹھ دس سال کا حبشی بچہ ہاتھ میں نوٹ لے کر دستخط کروانے کے لئے کھڑا تھا۔ اس کو خیال آیایا وزیر کو خیال آیا بہرحال اللہ تعالیٰ نے اپنے پیار کا ان کو ایک نشان دکھانا تھا اور ایسے سامان پیدا کر دیئے مجھے خیال آیا کہ یہ غیر ملکی یہاں میرا مہمان ہی ہے ہماری تو ساری دنیا مہمان ہے نا اس لئے میں اس کے نوٹ کی بجائے اپنے نوٹ پر دستخط کردیتاہوں چنانچہ میںنے اپنی جیب سے ایک نوٹ نکالا اور اس پر دستخط کرکے اسے پکڑا دیا یہ تو بالکل معمولی بات تھی پھر کھڑا ہوا اور میں نے اس بچے کو گلے لیا اور اس کو پیار کیا ان کے جہاز نے پہلے جانا تھا اورجب اعلان ہوا کہ اس ہوائی جہاز کے مسافر آکر ہوائی جہاز میں بیٹھ جائیں تو وہ کھڑے ہوئے اور میرے پاس آگئے۔ میں بھی کھڑے ہوکر ان سے ملا۔ اس وزیر کا یہ حال تھا کہ میراشکریہ ادا کرتے ہوئے اس کے ہونٹ پھڑپھڑا رہے تھے۔ وہ اتنا جذباتی ہوا تھا۔ اس نے کہا ہم آپ کے زیراحسان اور بہت زیادہ ممنون ہیں پتہ نہیں اورکیا کچھ کہہ رہاتھا اور میری آنکھیں مارے شرم کے جھک رہی تھیں۔میں دل میں کہتا تھا میں نے تمہیں کیا دیا ہے اسلام کا ایک چھوٹا سا تحفہ ہی ہے نا! جو میں نے تمہیں دیا ہے لیکن اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ سوچ بھی نہیں سکتے کہ کوئی ایسا شخص بھی دنیا میںہے جو ہمارے بچوں کو اس طرح پیارکرسکتاہے مگراللہ تعالیٰ نے ایک شخص نہیں ایک قوم پیدا کر دی ہے۔ جو ان کے بچوں، بڑوں، بوڑھوںاور جوانوں سے پیارکر رہی ہے اور یہ ذمہ داری ہم پر عائد ہوتی ہے اللہ تعالیٰ اسے نباہنے کی ہمیں توفیق عطا کرے۔ ویسے میںیہ فقرہ کہنے پر خود کو مجبور پاتا ہوںحضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے محبوب ترین روحانی فرزند کی پیاری جماعت (اللہ تعالیٰ کا آپ پر سلام ہو) بے حد قربانی کرنے والی ہے۔ جب میں افریقہ سے واپس انگلستان آیا تو میری طبیعت میں بڑی بے چینی اور گھبراہٹ تھی اور یہ بے چینی اس وجہ سے تھی کہ کوئی حصہ جماعت کا کہیں کمزوری نہ دکھا جائے۔ میں پہلے بتا چکا ہوں کہ پانچواں ملک گیمبیا تھا۔ جب میں اس ملک کا دورہ کر رہا تھا تو اللہ تعالیٰ کامجھے یہ منشا معلوم ہوا کہ کم ازکم ایک لاکھ پائونڈفوری طور پر ان ملکوں میں غلبۂ اسلام کے لئے خرچ کرو۔ ویسے تو جب اللہ تعالیٰ کا منشاء ہوتا ہے تو وہ چیز مل جاتی ہے بعض دفعہ منہ سے کوئی فقرہ نکل جائے تو اس کوبھی اللہ تعالیٰ اپنے عاجز اور حقیر بندے کی عزت رکھنے کے لئے اس کی بات پوری کردیتا ہے لیکن پھر بھی خطرہ تورہتا ہے کہ کوئی حصّہ جماعت کا کمزوری نہ دکھاجائے مگر میں بڑا خوش ہوا۔ انگلستان میںہماری چھوٹی سی جماعت ہے۔ بچوںسمیت ان کی تعداد شاید پانچ دس ہزار ہی ہوگی۔ پہلے جمعہ کے دن اورپھر اتوار کو میں مجموعی طورپرقریباً پونے دوگھنٹے یا دوگھنٹے ان کے پاس بیٹھاہوں۔ اس دوران ۲۸۔۳۰ ہزار پائونڈ کے وعدے اور۴۔۵ ہزار پائونڈ نقد رقم جمع ہوگئی جس کو وہیں میں نے’’نصرت جہاں ریزروفنڈ‘‘ کا نام دے کر عام جو ہماری مد ہے اس سے علیحدہ مد کھلوا کر جمع کروا دیا اور جو بات میرے منہ سے نکلی تھی وہ یہ تھی کہ قبل اسکے کہ میں انگلستان چھوڑوں دس ہزارسے زائد رقم اس میں جمع ہونی چاہئے ہمارے وہاں کے جوعہدیدار ہیں امام رفیق سمیت ان کو یہ یقین تھا کہ یہ ہوہی نہیںسکتااور اسی لئے انہوںنے مجھ سے کہاکہ یہ کیسے ہوسکتا ہے دس بارہ دن کے بعد آپ جارہے ہیں۔ یہ رقم بڑی ہے جو دوست آپ کے سامنے آکر بیٹھے اور جنہوںنے آپ کی باتیں سنی ہیں وہ تو انگلستان کی جماعت کا مشکل سے پانچواں یا چھٹا حصہ ہوںگے بڑی چھوٹی جماعت ہے آپ مجھے ایک ماہ کی مہلت دیں۔ میں انگلستان کی ساری جماعتوں کا دورہ کروں گااور پھر امید ہے ایک مہینے میںیہ دس ہزار پائونڈ جمع ہوجائیں گے میں نے مسکرا کر انہیں کہا کہ میں آپ کو ایک دن کی مہلت بھی نہیں دوں گااور جب میں یہاں سے جائوںگا تو انشاء اللہ دس ہزار پائونڈسے زیادہ کی رقم اس مد میں جمع ہوچکی ہوگی آپ فکر نہ کریں میںنے ان سے یہی کہا کہ جب اللہ تعالیٰ نے میرے منہ سے یہ نکلوایا ہے تو وہ آپ ہی اس کا انتظام بھی کرے گا حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ایک چھوٹا سا فقرہ نظم میں کہا ہوا ہے کہ
    ؎ گھر سے تو کچھ نہ لائے
    (درثمین صفحہ۳۶)
    اللہ تعالیٰ کا کام ہے اسی نے توجہ اس طرف پھیری ہے اس کا منشاء مجھے معلوم ہواہے اس لئے اس کاانتظام تو ہوجائے گا جب میں نے انگلستان کی جماعت کویہ تحریک کی جس کا ردّعمل بڑا اچھاہواتو میں نے ان سے یہ بھی کہاکہ مجھے یہ فکر نہیں کہ میںتم سے جو مطالبہ کررہا ہوں وہ پورا ہوگا یا نہیں کیونکہ مجھے یقین ہے کہ وہ پورا ہوجائے گا میںنے آدمی بھی بھیجنے ہیں ڈاکٹر بھی اور سکول ٹیچرز بھی۔ مجھے یہ فکر نہیں کہ یہ آدمی کہاں سے آئیںگے کیونکہ خدا کہتا ہے کہ وہاں آدمی بھیج، میںنے تو انسان کوپیدا نہیں کیا، اسی نے انسان پیدا کئے ہیں، وہ آپ ہی اس کا بھی انتظام کریگا لیکن جس چیز کی مجھے فکر ہے اور تمہیں بھی فکر کرنی چاہئے وہ یہ ہے کہ محض قربانی دے دینا کافی نہیں ہوتا جب تک کہ اللہ تعالیٰ اس قربانی کو قبول نہ کرلے سعی مشکورہونی چاہئے خالی قربانی پیش کردینا توکسی کا م کا نہیں۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث میں بڑی تفصیل سے یہ بات بیان ہوئی ہے کہ سینکڑوں آدمیوں کی قربانی( جووہ دے چکتے ہیں) پر جب ثواب دینے کا وقت آتا ہے تو اللہ تعالیٰ اس قربانی کو اٹھا کر ان کے منہ پر مارتا ہے کہ تمہارے اندر فلاں کمزوری تھی، ریاء تھا تکبر تھا، توحید پر پورے طور پرقائم نہیں تھے۔ میں نے تمہارے مال کو کیا کرنا ہے۔ کوئی چیز تمہاری قبول نہیں۔
    پس میں نے وہاں اپنے دوستوں سے کہا تم اس کی فکر کرو کہ اللہ تعالیٰ تمہاری قربانیوں کو قبول کرے۔ میں دعا کروں گا اپنے لئے بھی اور تمہارے لئے بھی تم بھی دعائیں کرو پھر مجھے اور فکر پڑگئی گوایک لحاظ سے تسلی بھی تھی بہرحال امام جماعت کو فکر تو رہتی ہے کہ جماعت کے کسی حصے میں بھی کمزوری نہ واقع ہوجائے۔ اب میں پاکستان میںآیا ہوں اور یہاں میں یہ تحریک کرناچاہتا ہوں ایسا نہ ہو کہ پاکستان کے کسی حصے میںکوئی کمزوری نظر آئے چنانچہ آپ کے پاس اخبار الفضل پہنچا ہوگا اللہ تعالیٰ نے اپنا فضل کیا ہے کہ سترہ دن میں سترہ لاکھ کے وعدے اور دو لاکھ سے اوپر نقد جمع ہوگیا ہے۔ ان وعدہ جات میں سے پنجابی میں جسے پنج دونجی کہتے ہیں یعنی۵/۲کی فوری ادائیگی کرنی ہے اور فوری سے میری مراد نومبر تک ہے جیسا کہ میں پہلے بیان کرچکاہوں اور مجھے یقین ہے ۵/۲سے کہیں زیادہ نقد نومبرسے پہلے پہلے انشاء اللہ جمع ہوجائے گا۔لیکن اس کے باوجود جماعت کا یہ نہایت شاندار رویہ ہے یعنی جب آپ اس چیز کو غیر کے سامنے بیان کریں تو پہلے تو وہ اس کا اعتبار ہی نہیں کرے گا اوروہ کہہ دے گا کہ آپ یونہی گپ مارہے ہیں اور جب اعتبار کرے گا تو حیران ہوگا اس کی سمجھ میں بھی نہیں آئے گا کہ یہ کیاہوگیا ہے کیا دنیا میںایسا بھی ہوا کرتا ہے اسلام کے نام پر ایسا ہونے لگ گیا ہے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے جب دعویٰ کیا تو مسلمانوں میں سے آپ کے ساتھ وہ لوگ شامل ہورہے تھے جنہوں نے اس کی خاطر کبھی ایک دھیلہ بھی نہیں دیا تھا۔ پھر جب وہ احمدی ہوگئے انہوںنے شروع میں آنہ ماہوار دینا شروع کیا، کسی نے چار آنے ماہوار دینے شروع کئے۔ کہنے کوتو ایک آنہ یا چارآنے کوئی چیز نہیںلیکن اگریہ دیکھا جائے کہ اس سے دلوں میں ایک عظیم انقلاب بپا ہوگیا کہ ساری عمر میںکبھی ایک آنہ نہیں د یا تھالیکن اب ایک آنہ ماہوار دینا شروع کردیا۔ ساری عمر میں کبھی چو ّنی نہیں دی تھی اور اب ہر مہینے چو ّنی دینی شروع کردی۔ تو اس کی اہمیت بہت بڑھ جاتی ہے۔ چنانچہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے اس عظیم انقلاب کو نمایاں کرنے کے لئے اور ان کے لئے دعائوں کے دروازے کھولنے کی خاطر اپنے ان صحابہ کا نام اپنی کتابوں میں لکھدیا آپ کتابیںپڑھیںتو آپ کو پتہ لگے گا کسی نے آنہ دیا کسی نے چو ّنی د ی او رکسی نے اٹھنّی دی اورکتابوں میں ان کا نام درج ہے قیامت تک جب احمدی اُن کتب کو پڑھیں گے توان کے لئے دعائیںکریں گے مگر پھر یہی لوگ تھے کہ جب ایک وقت آیا وہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی صحبت میں بیٹھے اور انہوںنے آپ سے روحانی تربیت حاصل کی تو انہوں نے بعض دفعہ اپنی ساری جائیداد آپ کے قدموں پر لاکر ڈال دی کہ یہ لیں۔ خدا کی راہ میں خرچ کرنے کی ضرورت ہے تو آپ اسے قبول کریں یہاں ایبٹ آباد میں ایک دوست نے بتایا کہ ان کے حلقہ میں ایک صاحب ہیں انہوں نے ساری کتابیں پڑھ لی ہیں وہ کہتے ہیں کہ ہربات مانتا ہوں پر میں نے بیعت نہیں کرنی کیونکہ اگر میں نے بیعت کرلی تو تم مجھ سے چندہ لینے لگ جائو گے۔ میں نے ان سے کہا کہ یا وہ یہ بات سچ کہتے ہیں کہ ان کے دل میں احمدیت کی صداقت گھر کر گئی ہے مگر وہ پیسے دینے سے گھبراتے ہیں اور یاوہ آپ سے مذاق کررہے ہیں۔دونوں میںسے ایک بات ضرورہے میں آپ کو اجازت دیتا ہوں آپ ان سے کہیں کہ یہ بیعت فارم ہے اوراس کے اوپر دستخط کردیں خواہ ایک پیسہ مہینہ مقرر کردیں ہمیں کوئی اعتراض نہیں ہوگا اگروہ مذاق کررہے ہیں تو پتہ لگ جائے گا اور غلط فہمی دور ہوجائے گی اور اگر وہ مذاق نہیں کررہے اوریہ کہنے میں سنجیدہ ہیںتو پھر وہ ایک پیسہ یا ایک آنہ لکھوا دیںگے وہ اچھے پیسے کمارہے ہیں یعنی درمیانہ درجے کے۔ بہت زیادہ امیر تو نہیں بہرحال درمیانہ درجے کے ہیں ہمارے جو یہاں سیکریٹریٹ میں بڑے کلرک وغیرہ ہیں اتنی تنخواہ وہ لے رہے ہیں۔ میں نے کہا آج پیسہ یا آنہ مہینہ دینگے تو کچھ کہنے کی ضرورت نہیں۔ جب وہ احمدیت میں روحانی طورپر تربیت پالیں گے اوراحمدیت کے رنگ میں رنگے جائیں گے تو پھر کسی وقت ایسا وقت ان پربھی آسکتا ہے جیسا کہ صحابہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام پر آیا تھا کہ وہ آکر کہیں یہ لیں سارا مال اسے خدا کی راہ میں خرچ کردیں۔ اب دیکھیں کیا ہوتا ہے آپ یہ دعا کریں کہ بجائے اس کے کہ وہ پیچھے ہٹیں وہ پیسہ لکھوا کر بیعت فارم پر دستخط کردیں۔
    پس ہمیں یہاں پاکستا ن میں ویسے جائزہ لیتے رہنا چاہئے یہ امیر جماعت کا فرض ہے کہ وہ دیکھے ہماری جماعت کی کوئی پاکٹ کمزوری دکھانے والی تو نہیں۔ ویسے تو بحیثیت مجموعی سترہ دن میں سترہ لاکھ کے وعدے اور دولاکھ کے اوپر نقد رقم کا جمع ہوجانا تسلی بخش ہے جب کہ یہ آواز ابھی تک دیہاتی جماعتوں تک پوری طرح نہیں پہنچی جن میں احمدیت کی اکثریت ہے اور ان کے لئے ابھی موقعہ بھی نہیں کیونکہ وہ گندم تو بیج باج کر ختم کر چکے ہیں اور خریف کی فصلوں کا وقت ابھی آیا نہیں۔ فوری ادائیگی کے لئے نومبر تک کی حد مقرر کرنے کی ایک وجہ یہ بھی تھی کہ بعض دوستوں نے کہا کہ زمینداروں کو اسوقت ادا کرنے میں سہولت رہے گی۔بہرحال دل تو یہ کرتا ہے کہ آپ خلافت احمدیہ کو اسطرح منائیں کہ جو ۶۲ سال احمدیت کی خلافت پرگزرے ہیں ۶۲لاکھ روپے جمع ہوجائیں خدا کرے کہ ایسا ہی ہو جائے۔
    جس طرح یہاںکی رپورٹیں بڑی خوشکن ہیں اسی طرح وہاں کی رپورٹیں بھی بڑی خوشکن ہیں میں نے بتایا ہے کہ سکوتو کے گورنر نے حکم دے کر ۴۰۔۴۰ایکڑ زمین ہمارے سکولوں کے لئے دی ہے اسکے علاوہ ہسپتال کھولنے کے لئے(جس کو وہاں ہیلتھ سنٹر کہتے ہیں) بھی لوگ تعاون کررہے ہیں غانا کے ایک پیرامائونٹ چیف نے زمین کا ایک بہت بڑا قطعہ دیا ہے جس میں ایک کافی بڑی عمارت بھی بنی ہوئی ہے جو ہسپتال کے طور پر استعمال کی جاسکتی ہے۔ اس نے کہا ہے کہ یہ لے لو اور یہاں ڈاکٹر بھیجو۔ اسی طرح اس دورہ کے بعدپڑھے لکھے لوگوں کو احمدیت میں بڑی توجہ ہوگئی ہے۔ نائیجیریا میں آبادان جو کہ بہت بڑا مسلم ٹائون ہے اسکی آبادی دس یا بارہ لاکھ ہے اور ۹۵فیصد سے زیادہ مسلمان ہیں اس کے قریب اس عرصہ میں ۱۳نئی جماعتیں قائم ہوگئی ہیں انہوں نے آبادان میں ہماری جماعت کے صدر کو جو افریقن ہیں خود بلایا کہ اس علاقے کے مختلف قصبوں کے لوگ فلاں وقت اکٹھے ہوںگے وہ آپ سے تبادلہ خیالات کرنا چاہتے ہیں چنانچہ وہاں دو تین گھنٹے کے تبادلہ خیالات کے بعد ان تیرہ قصبوں کے ۴۰ سے زیادہ آدمیوں نے بیعت کرلی۔ وہاں احمدیت کی طرف بڑارجحان پیدا ہوگیا ہے اور بھی کئی جگہ سے رپورٹیں آئی ہیں مثلاً سیرالیون میں بھی پانچ نئی جماعتیں قائم ہوگئی ہیں یہ بھی رپورٹ آئی ہے کہ نارتھ کے علاقے میں بہت توجہ پیدا ہو گئی ہے۔
    امید ہے وہاں بھی بہت سی نئی جماعتیں قائم ہوجائیںگی۔ وہاں وہی کچھ ہو رہا ہے اللہ تعالیٰ نے جس طرح یہاں شروع میںکیا تھا۔ اب تو ہم اسلام آباد میں بھی ماشاء اللہ بہت سے احمدی بیٹھے ہیں بدرؔ کے وقت مسلمانوں کی جوتعداد تھی کام کرنے والوں کی اس سے زیادہ ماشاء اللہ صرف اسلام آباد کی تعداد ہے لیکن شروع میں پہلے ابتداء اس طرح کی اور یہ اللہ تعالیٰ کی سنت معلوم ہوتی ہے کہ کہیں ایک گھر احمدی ہوگیا کہیں دوگھر احمدی ہوگئے۔ پھر انہوں نے ماریں کھائیں، انہیں جوتیاں پڑیں ، گالیاں دی گئیں۔ اللہ تعالیٰ نے انہیں ہرقسم کی آگ میں سے گزارا اور ہر آگ جو ان کے لیے جلائی جاتی تھی۔ ان کے کان میں اللہ تعالیٰ کی یہ پیاری آواز آتی تھی کہ آگ سے ہمیں مت ڈرائو آگ ہماری غلام بلکہ غلاموں کی غلام ہے۔ غر ض حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے محبوب ترین روحانی فرزند کے غلاموں کو سینکڑوں بلکہ لاکھوں دفعہ آگ میں سے گزرنا پڑا اور وہ آگ ان کے لئے پھول بن گئی۔ ان کے جلانے کا باعث نہیں بنی۔
    وہاں مجھے ایک دن خیال آیا میں نے سیرالیون کا نقشہ سامنے رکھا اور وہاں ہمارے جو دوتین مبلّغ ہیں ان سے میں نے کہا کہ جہاںجہاں احمدی ہیں وہ جگہیں مجھے بتائو تاکہ میں نقشے پر نشان کروں چنانچہ انہوںنے سر جوڑا۔ کوئی آدھے پونے گھنٹے کے بعد انہوںنے مجھے مختلف جگہوں کے نام بتائے۔ میں نے ان پرنشان لگا دئیے اور اس کے گھنٹے دو گھنٹے بعد جماعت سے ملاقات تھی۔ میں ان سے پوچھتا تھا آپ کہاں کے رہنے والے ہیں؟اگرچہ سارے نام تو حافظے میں یاد نہیں رہ سکتے تھے پھر نام بھی غیر ملکی تھے لیکن میں نے اندازہ لگایا کہ یہ بیسیوں ایسی جماعتوں کے نام بتارہے ہیں جو مبلّغوں نے مجھے نقشے پر نہیں بتائے تھے اور پھر یہ جماعتیں یوں بکھری ہوئی ہیں جس طرح ۲۰ہزار فٹ کی بلندی سے گندم کے دانے ہوائی جہاز سے پھینکے جائیں تو وہ مختلف جگہوں میں بکھر جاتے ہیں۔ اسی طرح وہاں ہماری جماعت بھی بکھری ہوئی ہے بالکل بارڈر تک یوں ہر جگہ ایک چکر لگا ہوا ہے جماعتوں کا کہیں کم ہیں اور کہیں زیادہ ہیں لیکن ہر جگہ پہنچے ہوئے ہیں۔ اب غانا میں وا ؔکی ہماری بڑی مخلص پگڑیاں پہننے والی جماعت ہے۔ وہ جماعت احمدیہ کی وجہ سے پگڑیاں نہیں پہنتے بلکہ اس علاقہ میں پہلے سے پگڑیاںپہننے کا رواج ہے۔ بلکہ ہماری طرح وہ طُرّہ دار پگڑیاں پہنتے ہیں۔ وہاںہمارا عربی کا ایک ٹریننگ سکول بھی ہے اوراس جماعت نے سکول کیلئے زمین کا ایک بہت بڑا قطعہ بھی دیا ہے۔ میں نے ان کو لکھا ہے کہ میں کلینک بھی بنوائوں گا اس کے لئے مجھے رپورٹ کرو۔
    اب یہ حالات ہیں۔ بعض دفعہ میں اس وجہ سے پریشان ہوجاتا ہوں یہ پریشانی میرے لئے ہے اسکے بغیر چارہ نہیںہے۔ ویسے اللہ تعالیٰ کے وہاں بھی فضل دیکھے یہاں بھی فضل دیکھے۔ آپ کے دلوں کو بھی اللہ تعالیٰ نے یوں اپنے قبضہ میں لیا اوراپنی ضرورت کو پورا کرنے کے سامان پیدا کردئیے۔ پریشانی اس طرح ہوتی ہے کہ ہماری بات، ہمارے حالات وہاں پہنچنے میں بعض دفعہ مہینہ لگ جاتا ہے اور وہاں بہت ساری جگہوں میں پتہ ہی نہیں ہوتا کہ مثلاً پاکستان اورانگلستان میں کیا ہو رہا ہے وہ مجھے ڈر ڈر کر لکھتے ہیں کہ یہاں فلاں جگہ بھی ہسپتال کھل سکتا ہے۔ فلاں جگہ بھی سکول کھل سکتا ہے آدمیوں کا انتظام اور یہ اور وہ۔ انہیں یہ خیال ہے کہ شاید پیسے نہ ہوں انتظام نہ ہوسکے۔ شاید آدمی میسر نہ آئیں۔ میں انہیںخط لکھ رہا ہوں پتہ نہیں کتنے دنوں کے بعد انہیں پہنچتا ہے؟ (ہمارے اپنے بعض خطوط۲۰،۲۵دن تک بھی وہاں نہیں پہنچے تھے بعد میں چکر لگا کر ہمارے پاس یہاں پہنچے ہیں۔ ان کومیں نے لکھ بھیجا ہے کہ میرے پاس سب کچھ ہے۔ اللہ تعالیٰ نے روپیہ بھی دیدیا ہے آدمی بھی دے دئیے ہیں تم دوڑنے کی کوشش کرو، اب چلنا ہمارے لئے کافی نہیں اب دوڑنے کا وقت آگیا ہے پس میں یہ چاہتا ہوںاورآپ سے بھی یہ توقع رکھتاہوں کہ آپ بھی میری اس دعامیں اپنی دعائوں کو شامل کریں گے کہ اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے یہ سامان پیدا کردے کہ سال ڈیڑھ سال کے اندر کم ازکم ۳۰میڈیکل کلینک وہاں ان ملکوں میںکھول دئیے جائیں اسلئے کہ میڈیکل سنٹر یا ہیلتھ سنٹر جو ہے وہ ہمارے کام کرنے کی دراصل بنیاد بنتا ہے ہر ایک کلینک اوسطاً اڑہائی ہزار پائونڈ سالانہ کمارہا ہے یعنی سارے اخراجات کے بعد اتنی سیونگ ہورہی ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ جس ملک میں ہمارے چارسنٹرہیں وہاں دس ہزار پائونڈ کی سیونگ ہوتی ہے۔پھر ہمیں یہ فکر نہیں رہتی کہ دنیا کے حالات بدل رہے ہیں بہت سارے ملکوں میں آزادی تھی کہ اس ملک کی کرنسی جہاں اور جتنی مرضی ہو باہر بھیج دو مگر اب وہ پابندیاں لگارہے ہیں ہوسکتا ہے کہ ایک اور عالمگیر جنگ جو اس وقت Horizon(ہوریزن) پرنظرآرہی ہے اس کی وجہ سے کوئی ایسا وقت آ جائے کہ ہم باہرسے ایک پیسہ بھی وہاں بھجوانہ سکیں اس لئے ان ملکوں میں ہماری آمد کے ذرائع پیدا ہونے چاہئیں اور یہ تو’’ہم خرما وہم ثواب‘‘ والی بات ہے۔ ہم ان کی خدمت بھی کرتے ہیں اور اللہ تعالیٰ ہمیں پیسے بھی دیتا ہے اور ان کو بھی پتہ ہے اورہمیں بھی پتہ ہے کہ ہم نے یہ پیسے باہرلے کر نہیں جانے ان کے ملکوں ہی میں خرچ کردیں گے۔ پس وہاں کے مبلّغوں کی تنخواہیں ہیںاوروہاں کے سکولوں کے ابتدائی اخراجات ہیںکیونکہ وہاں کے سکول پہلے دو سال میں خرچ مانگتے ہیں پھر وہ اپنے پائوں پر کھڑے ہوجا تے ہیں۔
    ہاںایک چیز رہ گئی ہے اور وہ بھی بڑی ضروری ہے اوربڑی عجیب ہے میں نے ان کے معاشرہ کی جو خصوصیات دیکھیں ان میں میں نے یہ بھی دیکھا اور میں یہ دیکھ کر بڑا خوش ہوا کہ ان ملکوں کی حکومتوں کو اپنے سکولوں کو بہتر سے بہتر بنانے کی طرف بے انتہا توجہ ہے میں بغیر کسی مبالغہ کے کہہ سکتا ہوں کہ جتنی توجہ وہ اپنے سکولوں کی طرف دیتے ہیں اس کا سواں حصہ بھی ہمارے ملک میںسکولوں کی طرف نہیں دیا جارہا ۔وہاں ہمارے اپنے سکول ہیں۔ میراخیال ہے کہ۹۹ فیصد پاکستان کے گورنمنٹ کالجز کی لیبارٹریز اتنی اچھی Equipped(سامان سے آراستہ) نہیں جتنی اچھی وہاں ہمارے ہائرسیکنڈری سکولز کی لیباریٹریز ہیں۔ سارا خرچ حکومت دیتی ہے اورپھر ہمیں اپنی پالیسی چلانے کی بھی اجازت ہے۔ سکولوں کے سٹاف کی ساری تنخواہیں حکومت دے رہی ہے مثلاً سیرالیون میں ہمارے چار سکول ہیں (اور جگہوں پر بھی ہیں) ان چاروں سکولوں کے سارے سٹاف کی تنخواہیں حکومت دیتی ہے اور اب وہ بعض دفعہ عیسائی ٹیچر بھی مقرر کردیتے ہیں لیکن تربیت کے لحاظ سے، دینیات پڑھانے کے لحاظ سے ہماری پالیسی چل رہی ہے مثلاً فری ٹائون کے سکول کے اساتذہ میںمیرے خیال میں پانچ چھ غیر احمدی ہیں یہ میں نے پتہ نہیںلیا ان میں کوئی عیسائی بھی ہے یا نہیں البتہ کماسی میں تین چار عیسائی بھی ہیں لیکن اس کے باوجود ہمارے فری ٹائون کے سکول کی آخری کلاس جو۲۷ لڑکوں پر مشتمل تھی جب امتحان پاس کرکے نکلی تو ساروں کے ساروں نے بلا استثنا بیعت فارم پر دستخط کئے اور اپنے سرٹیفکیٹ لے کر گھروں کو چلے گئے پس پیسے وہ خرچ کررہے ہیں اوراللہ تعالیٰ کام ہمارے کئے جارہا ہے لیکن یہ تو علیحدہ معاملہ ہے اس پرشاید یہاں سمجھ آنے میں کچھ دیر لگے اللہ تعالیٰ ان کو سمجھ عطا کرے لیکن یہ کہ سکول اچھا ہو سٹاف اچھا ہو اس طرف ان کو توجہ ہے اس وجہ سے ایک وزیر ہمارے پرنسپل کوکہنے لگے کہ لو گ ہماری بوٹیاں نوچ رہے ہیں کہ اس سکول کو کہوکہ زیادہ لڑکوں کو داخل کرے کیونکہ وہ اپنے لڑکوں کو کسی اورسکول کی بجائے وہاں داخل کروانا چاہتے ہیں ہوایہ تھا کہ حکومت نے یہ قانون بنایاکہ کسی ہائی سکول میں جو کہ پانچ سالہ کورس کا ہے یعنی ہائرسیکنڈری سکول میں ۳۵۰یا۳۶۰ سے زیادہ لڑکے داخل نہیں کئے جائیں گے چنانچہ اس کا اعلان کردیا گیا لوگوں نے شور مچا دیا کہ حکومت کا یہ قانون احمدیہ سکولوں پر لاگو نہ کیا جائے چنانچہ حکومت کویہ اعلان کرنا پڑا کہ ہمارا یہ قانون احمدیہ سکولوں پر نہیں لگے گا اور حد مقرر ہوئی ہے تقریباً ساڑھے تین سو کی اور فری ٹائون کے ہیڈ ماسٹر پر زور دے رہے ہیں کہ اس Admission(داخلہ) کے وقت جو غالباً یہاں کی طرح ستمبر اکتوبر میں ہوتی ہے ساڑھے چھ سو لڑکا داخل کروورنہ لوگ ہمیں تنگ کریں گے اور اس کے لئے انتظام کرو۔ سٹاف جنتا چاہئے وہ لو اور کمرے بنوانے کی ضرورت ہوتو کمرے بنوائو۔ پیسے تووہاں کی حکومت ہی دیتی ہے یا جوہمSave(بچت) کرتے ہیں وہ وہاں لگا دیتے ہیں لیکن اس کا بہت بڑا بار جو ہے وہ حکومت خود اٹھالیتی ہے یعنی ہمارا اپناسکول ہے ہم وہاںتبلیغ کررہے ہیں اوروہاں اسلام کے غلبہ کے لئے نوجوان نسل کو تیاری کروا رہے ہیں خرچ حکومت دے رہی ہے اور پھر ساتھ ممنون بھی ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ کے فضل سے یہ ہمارے ماڈل سکول ہیں ایک پیرا مائونٹ چیف(یعنی علاقے کا رئیس آپ سمجھ لیں) کا بچہ پڑھتا نہیں ہوگا اسے کہا کہ اگرتم مڈل میں اچھے نمبر لے کر پاس ہوگئے تو تمہیں ہائر سیکنڈری سکول میں داخل کروا دونگا اسی سال کی بات ہے کہ اس نے امتحان دیاہواہے پتہ نہیں نتیجہ نکلا ہے یا نہیں ایک دن وہ اپنے باپ سے کہنے لگا کہ اباآپ کو یا د ہے آپ کا مجھ سے وعدہ ہے کہ اگر میںا چھے نمبر لے کرپاس ہوگیا تو آپ مجھے ہائر سکینڈری سکول میں تعلیم دلوائیں گے انہوںنے کہا ہاں مجھے یاد ہے کہنے لگا کہ پھر یاد رکھیں میں احمدیہ میں داخل ہوںگا اور کسی سکول میں داخل نہیں ہوں گا وہاں ہمارے سکول احمدیہ سکول نہیں کہلاتے بلکہ عام محاورے کے لحاظ سے صرف ’’احمدیہ‘‘ کہلاتے ہیں۔ اس کا یہ کہنا کہ میں احمدیہ میں داخل ہوں گا کسی اور سکول میں داخل نہیں ہونگااس بات کی دلیل ہے کہ ہمارے سکولوں کی بڑی مقبولیت ہے اگلی نسل کے دلوں میں بھی اور بڑوں کے دلوں میں بھی میںنے بتایا ہے کہ وزراء سفارشیں لیکر جاتے ہیں اور یہ ان کے معاشرہ کے حسین ہونے کی دلیل ہے یعنی ایک وزیر اور سکول کے ایک پرنسپل میںکوئی فرق نہیں یہاں تو میرے خیال میں کسی وزیر صاحب کے پاس جانا آسان نہیں اب تو مارشل لاء ہے سول حکومت آئے گی تو دیکھیں گے وہ کیا کرتی ہے؟ پہلی سول حکومتیں تو یہی کیا کرتی تھیں کہ وہ سکول کے ہیڈ ماسٹر کو ملاقات کا وقت توکیا بڑے اچھے اچھے کالجوں کے پرنسپل کو بھی ملنے کیلئے کئی دن دھکے کھانے پڑتے تھے۔ یہ ہماری تصویر ہے اور ان کی تصویر یہ ہے کہ وزیر سکول میں آرہا ہے اور سفارش لیکر آرہا ہے کہ لڑکے کو ضرور داخل کرنا ہے اور ایک دونہیں بلکہ ایک ایک دن میں چھ چھ وزیر آرہے ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ان کو کوئی جھجک نہیں۔ بڑے سادہ معاشرہ میں زندگی کے دن گزاررہے ہیں اللہ تعالیٰ انہیں مبارک کرے اور بھی زیادہ سادگی پیدا کرے۔ وہاں کبھی بھی بڑے اور چھوٹے کا فرق پیدا نہ ہو۔ غرض ان ملکوں میں حکومت کو سکولوں کی طرف بڑی توجہ رہتی ہے میں نے گیمبیا میں ان کے معاشرہ کے لحاظ سے اپنے ایک دوست سے کہا کہ یہاں کے وزیر تعلیم جو وزیرصحت بھی ہیں انہیںمیرے پاس لے کرآئو، میں نے ان سے باتیں کرنی ہیں خیر وہ آگئے میں ان سے کہوں کہ میں نے پہلے یہاں میڈیکل سنٹرز کھولنے ہیں کیونکہ میرے ذہن میں تویہ تھا کہ یہاں مجھے آمد کا ذریعہ بنادینا چاہئے لیکن وہ یہ کہیں کہ ہمارا ملک تعلیم میں بہت پیچھے ہے آپ یہاں پہلے ہائی سکول کھولیں اور ہائی سکول کھولنے پر پہلے سال چارپانچ ہزار پائونڈ اپنے پاس سے خرچ کرنا پڑتا ہے، اس کے بعد حکومت مدد دینا شروع کردیتی ہے میں نے انہیںکہا دیکھیں! آپ میرے ساتھ تعاون کریں اور جیسا کہ میں نے پروگرام بنایاہے چار نئے میڈیکل سنٹرز یہاں کھلنے دیں اور اس سلسلہ میں ہمارے ساتھ پورا تعاون کریں اور میںآپ سے یہ وعدہ کرتاہوں کہ اگر آپ نے ہمیں یہ سہولتیں دے دیں یعنی زمین اور ڈاکٹروں کے لئے انٹری پرمٹ تو ہم انشاء اللہ ہر سال ایک نیا ہائی سکول کھولتے چلے جائیںگے۔ گیمبیا تعلیم میںاتنا پیچھے ہے کہ جب میں وہاں گیا تو مجھے خیال آیا کہ میں ان سے کہوں کہ وہاں یونیورسٹی نہیں تم یونیورسٹی بنائو نصف نصف بارہم تقسیم کرلیں گے وزیر تعلیم ہنس پڑے کہنے لگے کہ ہمارے ملک کی ٹوٹل پاپولیشن میں سے دسویں جماعت کے طلباء کی تعداد صرف ایک ہزارہے سارے ملک میں سے ایک ہزار لڑکا دسویں جماعت کے امتحان میں بیٹھتا ہے ہم یونیورسٹی کس برتے پر بنا سکتے ہیں اسلئے پہلے آپ ہائی سکول کھول دیں میں نے ان سے کہا کہ وہ توانشاء اللہ کھل جائیں گے خدا کرے کہ۸۔۱۰ سال کے بعد وہ ملک اس قابل ہوجائے کہ وہاں ایک یونیورسٹی اپنے پائوں پر کھڑی ہوسکتی ہو اور ہمیں ۵۰فیصد کا بوجھ حکومت کے کندھوں پر ڈالنے کی ضرورت پیش نہ آئے یہ بوجھ بھی ہم خود ہی برداشت کرلیں اور وہاں ایک یونیورسٹی کھول دیں اللہ تعالیٰ سے کوئی بعید نہیں آپ الحمدللہ بہت پڑھیںکہ اللہ تعالیٰ نے آپ کو ایک حسین اور عظیم رنگ میں ایک چھوٹے سے منصوبہ کے لئے قربانی کرنے کی توفیق عطا کی ہے اور دعائیں کریں کہ اللہ تعالیٰ ان قربانیوں کو قبول فرمائے اورپھر یہ بھی دعا کریں کہ جو خوبصورت اور حسین شکل مجموعی طورپر پاکستان میں بنی ہے ہر شہر اورہرقصبے کی وہی خوبصورتی قائم رہے ۔ ہمیں کسی جگہ بھی کوئی کمزوری نظر نہ آئے۔
    بعض دفعہ راولپنڈی اور اسلام آباد مالی قربانی میں کمزوری دکھا جاتے ہیں میں نے بڑا غور کیا ہے اوربڑی دعائیں بھی کی ہیں لیکن اللہ تعالیٰ کی حکمت یہ ہے کہ مجھے اس کی وجہ سمجھ نہیں آئی بڑی مخلص جماعت ہے ہر طرح قربانیاں دیتی ہے کہیں کوئی خرابی ہے کہاں ہے؟ وہ میں Pin Point (پن پوائنٹ) نہیں کرسکا یعنی اس کے اوپر انگلی نہیں رکھ سکا خدا کرے وہ کمزوری جہاں بھی ہے وہ دورہوجائے ایک چیز تو یہ ہے ممکن ہے اسی کااثر ہو کہ یہاں کے عہدیدار جماعت کو اپنے اعتماد میں نہیں لیتے یہ بڑی سخت غلطی ہے یہ ایک آدمی یا آدمیوں کا کام نہیں حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جیسا عظیم انسان تونہ کبھی پیدا ہوا اورنہ پیدا ہوسکتا ہے انہیں بھی اللہ تعالیٰ نے امت محمدیہ کے دل میں بشاشت پیداکرنے کے لئے یہ حکم دیا ’’شَآوِرْھُمْ فِی الْاَمْرِ(آل عمران :۱۶۰) کہ مشورہ میں ان کو شریک کرو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنی فراست اپنے مقام اور اس زندہ تعلق کی وجہ سے جو آپ کوہروقت اپنے رب کے ساتھ تھاکسی اورکے مشورہ کی آپ کو ضرورت نہیں تھی وہ علّام الغیوب اور ہادیٔ برحق ہر وقت آپ کو مشورہ اور ہدایت دیتا تھا۔ سارا قرآن کریم یہی ہے یہ ہمارا ہدایت نامہ ہے لیکن حکم یہی دیا شَآوِرْھُمْ فِی الْاَمْرِ (آل عمران :۱۶۰) اورایک اوربات میں آپ کو بتادوںمجھے اس کا بڑی شدت سے احساس ہے میں نے وہاں جب کمیٹی بنائی’’نصرت جہاں ریزروفنڈ‘‘کے اکائونٹ کو اوپر یٹ کرنے کے لئے توان سے میں نے کہا کہ اس کمیٹی میں ایک نوجوان ضرور رکھوں گا۔ اگلی نسل کو یہ پتہ لگنا چاہئے کہ ہماری بھی ذمہ داری ہے اور ہماری بھیContributions(کنٹری بیوشنز) ہیں صرف بڑوں کا یہ کام نہیں ہے نوجوان نسل ساتھ شامل ہونی چاہئے۔ چنانچہ اس سہ رکنی کمیٹی میں ایک نوجوان کو نامزد کرکے اس کا اعلان کردیا تاہم یہ مستقل نہیں ہے ہرسال میں بدل دیا کروںگا تاکہ دوسرے نوجوان آگے آئیں پھر ان کی عزت افزائی ہوگی اور کام کرنے اور ثواب کمانے کاموقع ملے گا۔
    پس جہاں جہاں بھی ہمارے نظام قائم ہیںان کو اس طرف توجہ کرنی چاہئے میں سمجھتا ہوں کہ نوجوانوںمیںسے ۳۰ فیصدی کواپنے مشوروں میں اوردوسرے جماعتی کاموں میں شامل کریں ورنہ اگلی نسل کویہ پتہ ہی نہیں لگے گا کہ ان کی ذمہ داریاں کیا ہیں اور انہیں کس طرح نباہنا ہے؟ اور ذمہ داریوں کو نباہ کر اللہ تعالیٰ کے فضل اور اسکے انعامات کس رنگ میں اور کن شکلوں میں نازل ہوتے ہیں ہم نے نسلاً بعد نسلٍ خدا تعالیٰ کے فضلوں سے اپنے نوجوانوں کو متعارف کرواتے چلے جانا ہے انسان اللہ تعالیٰ کے فضلوں سے تبھی متعارف ہوتا ہے جب وہ اللہ تعالیٰ کے لئے قربانی کرتا ہے اللہ تعالیٰ بڑا ہی پیار کرنے والا ہے۔ وہ جو خلوص نیت کے ساتھ اس کی راہ میں اپنے نفس کوپیش کرتے ہیں وہ اللہ تعالیٰ کے پیار کو اس رنگ میں پاتے ہیں کہ انسانی دماغ اس کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔ بیسیوں چیزیں ہیں کہ جنہیں ان نعمتوں کو حاصل کرنے والا بیان نہیں کرسکتا یعنی اس کو اجازت نہیں دی جاتی کہ وہ بیان کرے اس رنگ میں اللہ تعالیٰ فضل کرتا ہے ضرورت کے وقت بعض چیزوں کو بتانا بھی پڑتا ہے لیکن ایسی بے شمار چیزیں ہیںکہ جن کے بتانے کی نہ ضرورت ہے اورنہ اجازت ہے بہت ساروں کی اجازت نہیں ہوتی پس یہ جو ہماری نوجوان نسل ہے اس کو اپنے جماعتی کاموں میں شامل کروتاکہ یہ بھی اللہ تعالیٰ کے فضلوں کے حصول میں شامل ہوں ان کو پتہ لگے کہ قربانیاں ہیں کیا چیز؟ دنیاہے کیا چیز؟ دنیا ہمیں ڈرا نہیں سکتی۔ کب اور کس نے یہ توفیق پائی کہ اللہ تعالیٰ کے منشاء کے خلاف جماعت احمدیہ کوہلاک کردے؟ کسی نے بھی یہ توفیق نہیں پائی اسّی سال سے دنیا اکٹھی ہوکر ہمیں مٹانے کی کوشش کررہی ہے۔ میں نے افریقہ والوں سے بھی یہ کہا اور وہ یہ سُن کر بڑے خوش ہوئے کہ اسّی۸۰سال سے ساری دنیا کی طاقتیں اکٹھی ہوکر اس ایک آواز کو خاموش کرنے کے پیچھے لگی ہوئی ہیں جو یکہ وتنہا تھی جب وہ آواز اُٹھی حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی لیکن دنیا اسے خاموش نہیںکرسکی تمہاری آوازیں اسی آواز کی بازگشت ہیںجو میں سن رہا ہوں۔اس لئے میں خوش ہوں پس ایسا کبھی نہیںہوگا اور نہ ہوسکتا ہے کہ وہ آواز خاموش کرادی جائے لیکن جو فرداً فرداً اللہ تعالیٰ کے فضل نازل ہوتے ہیں وہ ہماریYoung Generation(ینگ جنریشن) یعنی نوجوانوں کو معلوم ہونے چاہئیں کہ اس میں کیا لذت اور کیا سرور اور کیا مزہ ہے! تاکہ وہ ساری دنیا سے بے پرواہ ہو کر اور بے خوف ہو کر قربانیوں اور ایثار کے میدان میں آگے آئیں اور وہ کام انجام پائے جو مشروط طور پرہوتا ہے کہ تم قربانی دوگے تو انعام ملے گا ورنہ قرآن کہتا ہے کہ اللہ ایک اور قوم کولائے گا جوان نعمتوں کی وارث بنے گی۔ پس جو نعمتیں ایک عام اندازہ کے مطابق اس رنگ میں اور اس شان کے ساتھ آج سے۲۰ سال بعد ہمیں ملنی ہیں وہ نوجوانوں کی جوانی کے جوش اور قربانی اور ایثار کے نتیجہ میں ۲۰ سال کی بجائے دس سال کے بعد مل جائیں۔
    اللہ تعالیٰ ہمیں سمجھ اورعقل اور ذمہ داری کا احسا س دے اور دعا کی توفیق دے اوربے نفس اپنی جانوں کو اس کے حضور پیش کرنے کی طاقت دے اور جو چھوٹی سی قربانیاں تھوڑی تھوڑی سی ہم پیش کررہے ہیں ان کو وہ قبول کرے اور اپنی بشارتوں کے مطابق ان کے نتائج نکالے۔ ان قربانیوں کے نتائج ان قربانیوں کے حجم کے مطابق نہ ہوں بلکہ ان بشارتوں کے مطابق ہوں جو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ خدائے قادروتوانا سے ہم نے پائی ہیں خدا کرے کہ ایسا ہی ہومیری طبیعت پر یہ اثر ہے۔ لندن میں بھی میں نے کہا تھا اور یہ کہنے پر مجبور ہوگیا تھا، میں سوچتا ہوں تو میرے دل کی کیفیت یہ ہوتی ہے۔ ع
    گو کہو دیوانہ میں کرتا ہوں اس کا انتظار
    (درثمین صفحہ ۱۳۰)
    غلبۂ اسلام کے دن مجھےHorizon(افق) پر نظرآرہے ہیں۔ یہ سورج انشاء اللہ طلوع ہوگا اور نصف النہار پر پہنچے گا اور بہت جلدی پہنچے گا لیکن اس سورج کی تپش کے ذریعہ سے گناہ کی خنکی سے بچنے کے سامان اللہ تعالیٰ پیدا کرے تبھی ہمیں فائدہ ہے اور جو توانائی اس مادی دنیا کو سورج کی شعاعیں دے رہی ہیں۔ روحانی سورج کی شعاعیں ہماری روحانی دنیا میں ہمیں ان فیوض کا اہل پائیں اور ہمیں وہ اتنی ملیں اتنی ملیں کہ ہم حقیقتاً اور واقعہ میں صحابہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ شامل ہوجائیں جیسا کہ ہمیں وعدہ دیا گیا ہے۔
    خطبہ ثانیہ کے دوران فرمایا:-
    ایک تو میں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ مَیں(جمعہ اور عصر کی )نمازیں جمع کرائوں گا اور عصر کی نماز دو رکعتیں پڑھائوں گا جوباہر سے دوست آئے ہوئے ہوں وہ بھی قصر کریں مقامی دوست جس میں راولپنڈی اور اسلام آباد دونوں شامل ہیں۔ وہ اپنی چار رکعتیں پوری کریں۔ دوسرے یہ کہ خدا معلوم کس وجہ سے تین دن سے مجھےLow blood presure(لو بلڈ پریشر) کی پھر سے تکلیف ہوگئی ہے۔ ۱۰۸۔۱۱۰ تک خون کا دبائو رہا ہے جس سے کافی تکلیف اور گھبراہٹ رہتی تھی۔ کل شام سے اللہ تعالیٰ کے فضل سے افاقہ ہے۔ دعا کریں اللہ تعالیٰ صحت سے رکھے اور کام کرنے کی توفیق دے اسی کی توفیق سے کام کیاجاسکتا ہے۔ اللہ تعالیٰ آپ پر بھی اور مجھ پر بھی اپنے فضل نازل فرمائے۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۲۱؍اپریل ۱۹۷۱ء صفحہ ۲ تا ۱۱)
    حضرت نبی کریم ﷺ کو اللہ تعالیٰ نے یہ وعدہ دیا کہ محمد اور
    احمد کے دو جلوے تیرے روحانی وجود سے دنیا دیکھے گی
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۱۷؍ جولائی ۱۹۷۰ء سعید ہاؤس ایبٹ آباد۔غیر مطبوعہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    ’’اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں فرمایا ہے
    (القصص: ۷۱)
    قرآن کریم کی آیت کے اس ٹکڑے کی تفسیر کرتے ہوئے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام فرماتے ہیں کہ جس حمد کی طرف یہ آیۂ کریمہ اشارہ کر رہی ہے وہ سورۂ فاتحہ میں بیان ہونے والی حمد ہے۔سورۂ فاتحہ میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے

    کہ اللہ تعالیٰ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ذریعہ اپنی ان چار بنیادی صفات کا مظاہرہ کرنے والا ہے اور جب ساری دُنیا ان صفات کے جلوے مشاہدہ کرے گی تو وہ اس نتیجہ پر پہنچے گی کہ تمام صفات کی مستحق اللہ تعالیٰ ہی کی ذات ہے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام فرماتے ہیں کہ جب حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم صفتِ رحمان کا مظہر بنے تو اللہ تعالیٰ نے آپ کا نام محمدؐ رکھا اور جب آپ صفت رحیم کے مظہر بنے تو اللہ تعالیٰ نے آپ کا نام احمدؐ رکھا اور اللہ تعالیٰ نے آپ سے یہ وعدہ فرمایا کہ وہ دو زمانوں میں آپ کی شریعت کو تمام دُنیا پر غالب کرے گا۔
    شروع زمانہ اسلام میں آپ کے وجود میں محمدیت کے جلووں کا ظہورہوا یعنی اللہ تعالیٰ کا جلال اور اس کا قہر دُنیا پر نازل ہوا۔ اصل تو اللہ تعالیٰ کی رحمت ہی ہے جب اس کا قہر اور جلال نازل ہوتا ہے تو وہ بھی رحمت ہی کی شکل میں ظاہر ہوتا ہے مثلاً اللہ تعالیٰ کی رحمانیت اورجلالت کا یہ جلوہ ہے کہ اس نے انسان کو اجازت دی کہ وہ اپنے جسم کی صحت کو برقرار رکھنے کے لئے بکرے یا دُنبے یا مرغی یا دوسرے حلال اور طیّب جانوروں کو ذبح کرے اور اُن کی جان لے۔پس ایک طرف ایک پہلو سے اللہ تعالیٰ کے جلال کا جلوہ ہے کہ ایک جان اس کے حکم اور اجازت سے لی گئی اور دوسری طرف اس کی رحمت کا جلوہ ہے کہ وہ جسے اس نے اشرف المخلوقات بنایا تھا اس کی جان کی حفاظت کے لئے اور اس پر رحم کرتے ہوئے دوسری مخلوقات میں سے جانیں تلف کروائیں جو کیڑے مثلاً بھیڑکے معدے میں پیدا ہو جاتے ہیں اور اس کی ہلاکت کا باعث بنتے ہیں ان کیڑوں کو مارنے کی اجازت دی اور اس کے لئے سامان پیدا کئے اور دُنیا میں ایسی دوائیں بنائیں جس کے نتیجہ میں وہ کیڑے مر سکتے ہیں تاکہ اس طرح کیڑے کے مقابلہ میں بھیڑ جو کہ اشرف المخلوق ہے اس کی زندگی کو محفوظ رکھا جائے ویسے اشرف المخلوقات تو صرف انسان ہے اور اسی نسبت سے جانداروں کے شرف کو قائم کیا جاتا ہے کیڑے انسانی جسم کے لئے مفید نہیں لیکن بھیڑ کا گوشت انسانی جسم سے زیادہ مناسبت رکھتا اور اس کی صحت کو برقرار رکھنے کے لئے ایک مفید چیز ہے۔ بھیڑ کی جان کو بچانے کے لئے کیڑوں کو تلف کر دیا۔ اب یہ اللہ تعالیٰ کی رحمانیت اور اس کے جلال اور قہر کا جلوہ ہے اور بھیڑ کی حفاظت کی اور انسان کے لئے ایک طیّب گوشت کی حفاظت کی یہ اللہ تعالیٰ کی رحمت اور اس کے جلال اور رحمانیت کا جلوہ ہے۔
    حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اللہ تعالیٰ نے یہ وعدہ دیا کہ محمد اور احمد کے دو جلوے تیرے روحانی وجود سے دُنیا دیکھے گی وہ عظیم جلوے کہ جن کے نور سے ساری دُنیا منوّر ہو گی اور جس کے روحانی فیوض سے ساری دُنیا مستفیض ہو گی۔
    آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانے میں اسلام کے ابتدائی دور میں محمدؐ کے جلوے دُنیا نے دیکھے آپ کے نفس میں بھی دیکھے اور آپ کے متبعین کے نفوس میں بھی دُنیا نے یہ جلوے دیکھے۔ دُنیا نے اس وقت اللہ تعالیٰ کے قہر اور جلال کے مقابلے میں اپنے قہر اور جلال کو دکھانا چاہا تب وہ اللہ تعالیٰ کے قہر اور جلال سے تباہ ہو گئے یہ خدائی قہر کا جلوہ ان کے خلاف تھا جنہوں نے اللہ تعالیٰ کی عظمت اور جلال کو مٹانا چاہا اور خدائی محبت کا جلوہ ان لوگوں کے حق میں تھا جنہوں نے خداتعالیٰ کے مقابلے پر آنے والی شیطانی طاقتوں کا دفاع کرتے ہوئے اپنی جانوں کو اس کی راہ میں قربان کیا اور اس طرح ابدی حیات کے وارث بنے اُنہوں نے اللہ تعالیٰ کی رضا کو پایا اور اس کی جنتوں میں اپنا ٹھکانا بنایا۔ پس ایک پہلو سے یہ قہر کا جلوہ ہے اور دوسرے پہلو سے یہ انتہائی فضل اور رحمت اور پیار اور رضا کا جلوہ ہمیں نظر آتا ہے۔
    اللہ تعالیٰ نے حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو یہ وعدہ بھی دیا کہ اسلام ایک وقت کے بعد کمزور ہو جائے گا اور دُنیا کی سب طاقتیں اکٹھی ہو کر اس پر آخری ضرب لگانے کا منصوبہ بنائیں گی اور سمجھیں گی کہ اب اسلام دُنیا سے مٹا دیا جائے گا۔ یہ وہ زمانہ ہے جس میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت ہوئی(ضمناً حضور نے ایک بچے کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا اے میرے پیارے بچو!حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کا نام حضرت مرزا غلام احمد تھا۔ دوست اپنے گھروں میں بچوں کو یہ نام بتایا کریں۔ ابھی پچھلے دنوں راولپنڈی سے ایک خادم آئے جب اس سے پوچھا گیا کہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کا نام کیا تھا؟ تو کہا مجھے پتہ نہیں حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کا نام کیا تھا؟ کہا مجھے تو علم نہیں۔ گھروں میں آپ اپنے بچوں سے باتیں نہیں کریں گے تو اس قسم کے جاہل بچے آپ کے گھروں سے تربیت پا کر نکلیں گے غرض اس تنزّل کے زمانہ میں حضرت مہدی معہود علیہ السلام جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے محبوب ترین روحانی فرزند تھے وہ مبعوث ہوئے۔ وہ زمانہ آج کی دُنیا بھول گئی ہے ان کی یاداشت اس کا ساتھ نہیں دیتی یہ وہ زمانہ ہے جب ’’حضرت‘‘ عماد الدین صاحب نے جو اجمیرکی شاہی مسجد کے امام تھے۔ یہ ’’حضرت‘‘ میں نے اس لئے کہا ہے کہ وہ دوسرے مسلمانوں کے نزدیک حضرت ہی تھے کیونکہ یہ شخص بڑے پایہ کا عالم تھا اس نے عیسائیت کو قبول کر لیا اور ایک مضمون لکھا عیسائیوں کی ایک کانفرنس کے لئے جو امریکہ میں منعقد ہو رہی تھی اس مضمون میں اس نے ویسے تو بہت کچھ لکھا مگر میں اس وقت صرف دو باتوں کا ذکر کرنا چاہتا ہوں ایک تو اس نے پتے دے کر ایک سو سے زائد علماء اور قرآن کریم کے حفاظ اور سید زادے اور مغل خاندانوں سے تعلق رکھنے والے اور پٹھانوں وغیرہ کے نام لکھے اور کہا کہ ہندوستان کے شمالی حصوں کے یہ لوگ جو بڑے بڑے عالم اور قرآن کریم کے حُفاظ ہیں عیسائی ہو چکے ہیں اور جہاں پہلے عیسائیت آئی تھی یعنی کلکتہ اور بمبئی وغیرہ وہاں کا جو حال ہو گا اس کا آپ اندازہ کر سکتے ہیں دوسرے اس نے یہ لکھا کہ وہ دن عنقریب ہندوستان پر چڑھنے والا ہے کہ جب کوئی شخص اگر کسی مسلمان کو دیکھنے کی خواہش کرے گا تو اُسے کوئی مسلمان نظر نہیں آئے گا اور اس کی یہ خواہش پوری نہیں ہو گی۔ اس حد تک اسلام گر چکا تھا اور اس حد تک منصوبے بنائے گئے تھے اسلام کو مٹانے کے لئے۔ بعض پادریوں نے لکھا کہ وہ وقت قریب ہے(اللہ تعالیٰ کی اُن پر *** ہو) کہ خانہ کعبہ پر خداوند یسوع مسیح کا جھنڈا لہرائے گا بعض نے کہا یہ وقت ہے کہ سارے براعظم افریقہ کو ہم خداوند یسوع مسیح کے لئے جیت لیں گے اور مسلمانوں کا یہاں سے نام ونشان مٹا دیا جائے گا۔
    اس قسم کی بڑیں تھیں جو یہ ہانک رہے تھے اور یہ خالی بیان نہیں تھے بلکہ اس کے پیچھے بڑا زبردست منصوبہ تھا اسلام کو مٹانے کے لئے اربوں روپے اسلام کو مٹانے کے لئے جمع کر لئے گئے تھے لاکھوں واقفین اس وقت عیسائیت کے پاس موجود تھے جنہوں نے اپنی ساری زندگیاں عیسائیت کو پھیلانے کے لئے وقف کر رکھی تھیں اور اس طرح اُنہوں نے ساری دُنیا میں دجل کا ایک جال پھیلا رکھا تھا۔ غلط دلائل۔ افتراء۔ حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ذات کے خلاف باتیں۔ پیسہ۔ اپنی لڑکیاں دوسروں کے ایمان پر ڈاکہ ڈالنے کے لئے یعنی ہر قسم کا گند اُنہوں نے استعمال کیا تھا۔ اسی طرح تعلیم کے سامان۔ کالج۔ ہسپتال۔ بیماروں کے ساتھ ہمدردی اور اسلام کا کوئی نام لیوا نہیں تھا اور ادھر ساری دُنیا کی طاقتیں جیسا کہ میں نے کہا اسلام پر آخری اور کاری ضرب لگانے کے لئے اکٹھی ہو گئی تھیں۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام ایک جگہ تحریر فرماتے ہیں کہ ہر چیز کا کمال اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ اس کے زوال کا وقت آگیا چنانچہ جس وقت اسلام کے خلاف شیطانی منصوبے اپنے کمال کو پہنچے تو اللہ تعالیٰ کے قوانین قدرت کے عین مطابق حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت ہوئی تاکہ آپ کے ذریعہ عیسائیت کو شکست دے کر اسلام کو غالب کیا جائے اور آپ احمد شان میں(یعنی حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا جو دوسرا نام احمد ہے۔ پہلا نام محمد اور دوسرا نام احمد) یعنی جمالی رنگ میں عشق ومحبت کی آگ میں سلگنے والا دل لے کر مبعوث ہوئے تھے اور یہی عشق ومحبت احمدیوں کے دلوں میں بھی پیدا کرنا چاہتے تھے۔
    آپ نے یہ اعلان فرمایا کہ یہ صحیح ہے کہ ایک وقت عیسائی کہا کرتے تھے کہ قرآن کریم میں کہاں معجزات کا ذکر ہے؟ اسلام نے کونسا معجزہ دکھایا ہے؟ مگر اب وقت آگیا ہے کہ میں خدا کے نام پر اور اس کے حکم سے آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی عظمت اور اسلام کی صداقت کو ثابت کرنے کے لئے مخالفوں کے مقابلہ میں آسمانی نشانوں کو ظاہر کروں لیکن یہ میرا مقابلہ نہیں کر سکیں گے بلکہ یہ تو میرے ماننے والوں کے دلائل کے سامنے بھی نہیں ٹھہر سکیں گے۔ آپ نے اُس زمانے میں یہ اعلان فرمایا جس وقت عیسائی دُنیا یہ سمجھتی تھی کہ یہ مضحکہ خیز باتیں ہیں۔ ہم تیار ہیں اسلام کو مارنے کے لئے اور اسلام بالکل تیار ہے مرنے کے لئے۔ کیونکہ زندگی اور جان اس کے اندر نہیں ہے نہ علمی میدان میں نہ تائیدات سماویہ کے لحاظ سے واقعی اسلام میں اس وقت کوئی جان باقی نہیں تھی لیکن اللہ تعالیٰ کے وعدہ کے مطابق محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اپنی احمدیت کی شان میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے وجود میں ظاہر ہوئے اور آپ کی بعثت کی یہ غرض ٹھہری کہ جس طرح پہلوں نے اللہ تعالیٰ کی چار بنیادی صفات کے جلوے دیکھے تھے۔اسی طرح آپ بھی دُنیا کو ان صفات کے جلووں کا مشاہدہ کروائیں۔ علمی لحاظ سے اس قدر دلائل آپ کو دئیے گئے ہیں کہ ان کا شمار ہی کوئی نہیں پھر محض اپنے فضل سے بے سروسامانی کی حالت میں اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام پر ایمان لانے والوں اور آپ کے طفیل حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نور سے روشنی حاصل کرنے والوں کی تربیت کا ایسا انتظام کیا کہ ہزاروں لاکھوں فدائی پیدا کر دئیے۔ دین کے جانثار پیدا کر دئیے اسلام کی روحانی فوج کے سپاہی پیدا کر دئیے۔ یہ محض اللہ تعالیٰ کی روحانی تربیت کا نتیجہ تھا جس کا وعدہ ’’رَبُّ الْعٰلَمِیْنَ‘‘ میں حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیا گیا تھا اور اپنے فضل سے بہت سارے سامان پیدا کئے۔ پھر حقیر کوششوں کے جو نتیجے نکلتے ہیں رحیمیت کے جلووں کی وجہ سے اس کا تو ایک سمجھدار احمدی اندازہ بھی نہیں لگا سکتا۔ اتنی سی ہماری کوشش ہوتی ہے ایسی کوشش کہ جو اس قابل ہی نہیں ہوتی کہ اس کا ذکر کیا جائے۔ ایسی قربانی(اگر اسے قربانی کہا جا سکتا ہو) کہ جس کا نام لیتے ہوئے ہمیں شرم آنی چاہئے مگر اس کا نتیجہ ایسا نکلتا ہے کہ معلوم ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ متصرف بالارادہ اور تمام قوتوں اور طاقتوں کا مالک ہے۔
    افریقہ میں جہاں کا میں اب دورہ کر کے آیا ہوں جو روپیہ عیسائیت خرچ کر رہی ہے اس کے مقابلہ میں ہم شاید ہزارواں بلکہ لاکھواں حصہ بھی خرچ نہیں کر رہے لیکن ان کے لاکھوں گنا زیادہ خرچ کا نتیجہ اور ہمارے لاکھویں حصہ خرچ کا نتیجہ اگر ہمارے سامنے ہو اور ہم مقابلہ کریں تو ان کے اپنے کہنے کے مطابق یہ ہے کہ اگر وہ ایک آدمی کو عیسائی بناتے ہیں تو احمدیت دس کو حلقہ بگوش اسلام بنا لیتی ہے یعنی کوشش لاکھواں حصہ اور نتیجہ دس گنا زیادہ یہ ہماری کوشش کا نتیجہ نہیں ہو سکتا نہ ہماری قربانی ایثار اس بات کا استحقاق رکھتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ یہ نتیجہ پیدا کرے یہ محض اس کا فضل اور رحمت ہے جس کے نتیجہ میں یہ تبدیلیاں اور یہ انقلاب دُنیا میں پیدا ہو رہے ہیں۔
    غرض حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام احمد کے روپ میں، احمد کے مظہر ہو کر، احمد کے ظل بن کر اس دُنیا کی طرف مبعوث ہوئے تھے اور جمالی طور پر (تلوار کے ذریعہ نہیں بلکہ) اخلاق کے ساتھ، دلائل کے ساتھ، تائیدات سماویہ کے ساتھ اور آسمانی نشانوں کے ساتھ دُنیا پر غالب ہونے کی ذمہ واری آپ کی جماعت پر ڈالی گئی ہے یہ بہت بڑا کام ہے سچی بات تو یہ ہے کہ ہمارے بس کا تو یہ روگ ہی نہیں ہے۔ اگر اللہ تعالیٰ کا یہ وعدہ نہ ہوتا کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی جماعت خلوص نیت کے ساتھ اپنی بساط کے مطابق قربانی دے گی تو انہیں یہ بشارت دی جاتی ہے کہ ساری دُنیا میں اسلام غالب آجائے گا۔ اگر یہ وعدہ نہ ہوتا تو کوئی عقل مند کھڑے ہو کر یہ نہ کہتا کہ مال کی قربانی دو یا جان کی قربانی دو بلکہ اللہ تعالیٰ جو اپنے قول کا صادق اور اپنے وعدوں کا سچا ہے اس نے یہ کہا ہے کہ جو تمہاری طاقت میں ہے وہ میرے حضور پیش کر دو پھر جو میری طاقت کے جلوے ہیں انہیں اپنی زندگیوں میں مشاہدہ کرو اور میرے وعدوں کو پورا ہوتے دیکھو۔ چونکہ یہ بشارتیں ہمیں حاصل ہیں اس لئے ہم کھڑے ہو کر جماعت سے یہ کہتے ہیں کہ آگے بڑھو اور قربانیاں دو اور اللہ تعالیٰ کے فضلوں کا وارث بنو ان فضلوں کا کہ تمہاری کوششیں اگر کروڑ گنا بھی زیادہ ہوتیں تب بھی وہ اس فضل کا تمہیں مستحق نہ بناتیں۔ چھوٹی سی قربانی کے نتیجہ میں اللہ تعالیٰ نے تم سے بے حد اور بے شمار فضلوں کا وعدہ کیا ہے اور اسی وعدہ کے پیش نظر ہم کھڑے ہو کر کہتے ہیں کہ آگے بڑھو اور قربانیاں دو۔
    مالی قربانی کے متعلق میں بتا چکا ہوں کہ جماعت نے اللہ تعالیٰ کے فضل سے بڑے اخلاص کا نمونہ پیش کیا ہے۔ جانی قربانی کے متعلق جہاں اساتذہ کا سوال تھا ہماری ضرورت سے زیادہ آگئے ہیں لیکن جہاں تک ڈاکٹروں کا سوال ہے(’’ابھی تک‘‘ یہ کہہ رہا ہوں یوں مجھے اُمید ہے کہ بعد میں آجائیں گے لیکن توجہ دلانا اور یاد دہانی کرانا میرا فرض ہے) پس ابھی تک جتنے ڈاکٹروں کی ہمیں ضرورت ہے وہ پورے نہیں ہوئے۔ ایک تو میرا خطبہ بھی ابھی نہیں چھپا بہت سارے لوگوں کو اس کی اہمیت کا بھی پتہ نہیں ہو گا۔ بہرحال میرے اس پہلے خطبہ کے چھپنے اور اس خطبہ کے چھپنے کے درمیان غالباً ۳۔۴ ہفتوں کا فرق پڑ جائے گا ایک اور یاد دہانی ہو جائے گی۔
    اس وقت جتنے بھی آدمیوں کی احمدیت اور اسلام کو ضرورت ہے وہ ہمیں دینے چاہئیں یعنی جو ہماری طاقت میں ہو اس سے دریغ نہیں کرنا چاہئے۔ ہم جب یہ قربانی دے دیں گے پھر بھی عیسائیت کے لئے زندگی وقف کرنے والوں کے مقابلہ میں ہماری تعداد غالباً ہزارواں حصہ ہو گی کیونکہ وہ اس وقت لاکھوں کی تعداد میں دُنیا میں کام کر رہے ہیں۔ پھر اُن کی عورتیں ہیںوہ بھی لاکھوں کی تعداد میں ننّیں (Nuns) بن کر جو ایک غیر فطری چیز ہے سر منڈا لیتی ہیں اور ساری عمر کنواری رہنے کا عہد کرتی ہیں اور ان کے مقابلہ میں توتم اپنی بہنوں سے یہ قربانی لے ہی نہیں سکتے کیونکہ اسلام نے اسے جائز قرار نہیں دیا۔ جو قربانی ہم لے سکتے ہیں اور لینا چاہتے ہیں وہ یہ ہے:-
    اوّل:- ہماری ہوشیار، دیندار، ذہین اور صاحب فراست بچیاں اپنی خوشی سے واقفین کے ساتھ شادیاں کریں اور دُنیا کی طرف نہ دیکھیں۔ دین کی نعمتوں کو ترجیح دیں۔
    دوم:- اپنے خاوندوں کے ساتھ جب باہر جائیں تو ان کی ممدومعاون بنیں اگر غیر ممالک میں بعض دفعہ چھوٹی چھوٹی تکلیفیں پیش آئیں تو ان سے گھبرا کر اپنے خاوندوں کا وقت ضائع کرنے کی کوشش نہ کریں اور انہیں صراط مستقیم سے ہٹانے کا موجب نہ بنیں۔
    سوم:- وہ ایسے علوم حاصل کریں کہ وہ بھی جب اپنے خاوندوں کے ساتھ باہر جائیں تو دین کا کام بھی کرنے والی ہوں۔صرف گھر کو سنبھالنے والیاں نہ ہوں اور یہ بہت سے طریقوں سے ہو سکتا ہے۔ اس کی تفصیل میں میں اس وقت نہیں جانا چاہتا۔
    میں نے بتایا تھا کہ غانا میں ہمارے انچارج مبلغ کلیم صاحب کی بیوی بالکل ان پڑھ تھیں جب وہ ان کے ساتھ باہر گئیں لیکن چونکہ مخلص اور اللہ تعالیٰ سے محبت رکھنے والی تھیں اُنہوں نے منصورہ بیگم کو خود بتایا کہ میں نے سوچا میں ایک اَن پڑھ عورت ایک مبلغ انچارج کی بیوی کی حیثیت میں یہاں آئی ہوں اردو بھی ٹھیک طرح مجھے نہیں آتی انگریزی کا ایک لفظ بھی نہیں جانتی میں اپنے مبلغ خاوند کے ساتھ کیسے تعاون کروں گی اور ان کا کس طرح ہاتھ بٹاؤں گی وہ کہنے لگیں کہ پھر اللہ تعالیٰ نے میری رہنمائی فرمائی اور میرے دل میں یہ خیال پیدا کیا کہ تم انگریزی اور اس قسم کی جو دُنیا میں اور مشہور زبانیں ہیں وہ نہ سیکھو بلکہ وہاں کی مقامی زبان( لوکل ڈائیلیکٹ) جو ہے وہ سیکھ لو۔ چنانچہ اُنہوں نے مقامی زبان سیکھنی شروع کر دی اور اس میں بڑی اچھی مہارت حاصل کی اور پھر سارا دن بچے اور بچیوں کو قرآن کریم اور اس کا ترجمہ پڑھاتی رہتی تھیں۔ان کے میاں باہر دوسری نوعیت کا تبلیغی کام کرتے تھے اور یہ گھر میں بیٹھ کر گھر بھی سنبھالتیں اور بچوں کو قرآن کریم بھی پڑھاتی تھیں۔ پس اگر اس قسم کا دل ایک احمدی بچی میں ہو اور ایسا ہی دل ہر احمدی بچی میں ہونا چاہئے تو پھر اسے خود سوچ کر دعائیں کرنے کے بعد اس قدر علم حاصل کر لینا چاہئے کہ جو باہر کے ممالک میں اسلام کے غلبہ کی اللہ تعالیٰ نے جو مہم چلائی ہے اس میں ممدومعاون ثابت ہو۔
    ہمارے احمدی ڈاکٹر اللہ تعالیٰ کے فضل سے بہت ہیں۔ پہلے تو شاید کم ہوتے ہوں گے لیکن اس سال کا میرا جو اندازہ ہے وہ یہ ہے کہ سارے مغربی پاکستان میں ہمارے ۲۰۔۳۰ احمدی بچے انشاء اللہ ڈاکٹری کا امتحان پاس کر کے ڈاکٹر بنیں گے اور موجودہ صورت میں بہت سارے تو باہر بھی چلے گئے ہیں کچھ مزید پڑھنے کے لئے اور کچھ نوکریاں کرنے کے لئے لیکن پھر بھی پاکستان میں ہمارا کئی سو ڈاکٹر ہونا چاہئے ان میں سے ہمیں سردست ۳۰ کی ضرورت ہے۔ بعض تو جو میرے علم میں ہیں یعنی میری یاداشت میں ہیں ان کو تو میں خط بھی لکھوا رہا ہوں کہ آگے آؤلیکن جو ڈاکٹر بالکل نیا ہو گا یعنی جس نے اس سال یا پچھلے سال ڈاکٹری کی ہے وہ فی الحال وہاں اتنا اچھا کام نہیں کر سکتا کیونکہ اس کا تجربہ زیادہ نہیں سوائے اس کے کہ کسی اچھے ماہر ڈاکٹر کے ساتھ جو پہلے وہاں کام کر رہے ہوں ان کے ساتھ اسے لگا دیں اور ان کے ساتھ مل کر دو چار سال کام کرے۔اللہ تعالیٰ ان کے ہاتھ میں بھی شفا دے دے علم میں بھی زیادتی دے دے اس لئے فی الحال بہتر یہ ہے کہ ایسے ڈاکٹر زندگی وقف کریں جو یا تو ریٹائر ہو چکے ہوں اور ان کی صحت بھی اچھی ہو اور یا دو چار سال کے اندر ریٹائر ہونے والے ہوں اور وہ اپنے محکمہ سے چھٹی لے لیں یا فراغت حاصل کر لیں یہ بھی ہو سکتا ہے کہ ۳۔۴ سال کی چھٹی لیں اور پھر ایک سال یہاں آکر کام کریں اور پھر محکمہ سے پوری طرح فراغت پا کر وہاں چلے جائیں۔ بہرحال جس تیزی کے ساتھ اس سکیم کے بعض شعبوں میں ہمیں یہاں کام کرنا چاہئے اسی تیزی سے ہمارے لئے اللہ تعالیٰ وہاں راہیں کھول رہا ہے شمالی نائجیریا میں حکومت نے ہمارے دو سکولوںکے لئے ہمیں ۴۰۔ ۴۰ ایکٹر مفت زمین دینے کا فیصلہ کر دیا ہے دوسرے دو سکول بھی وہاں کھلنے چاہئیں کیونکہ میں نے اُن سے چار کا وعدہ کیا ہے ان کے لئے بھی وہ عنقریب جب بھی ہم ان سے کہیں گے زمین دے دیں گے۔ ہمارے آدمی وہاں سست تھے میں نے اُنہیں تیز کیا ہے ایک پیراماؤنٹ چیف نے ایک خاصا بڑا زمین کا قطعہ جس میں کچھ عمارتیں بنی ہوئی ہیں دیا ہے اور کہا ہے کہ اسے سنبھالو اور یہاں سکول کھولو ۔ اس طرح وا(Wa) جو کہ غانا کا شمال مغربی علاقہ ہے۔ وہاں ہماری بڑی جماعتیں ہیں وہاں ہمارا ایک عربی کا سکول بھی ہے۔ وہاں کی جماعت نے زمین کا ایک وسیع قطعہ سکول اور میڈیکل سنٹر کھولنے کے لئے وقف کیا ہے۔
    پس اگر وہ لوگ تو قربانی پیش کر دیں، اللہ تعالیٰ ایسے حالات پیدا کر دے گا کہ وہاں کی حکومتیں ، غیر از جماعت امراء اور پیراماؤنٹ چیفس یا اس قسم کے دوسرے لوگ ہمیں زمینیں بھی دیں اور مکان بھی دیں گے اور آپ کہیں ہم آدمی نہیں دیتے تو اس سے بڑھ کر سُبکی اور شرم کی کوئی اور بات نہیں ہو سکتی۔ لیکن مجھے یقین ہے کہ ایسا نہیں ہو گا لیکن اس یقین کے باوجود چونکہ مجھے ذَکّر یعنی یاد دہانی کروانے کا حکم بھی دیا گیا ہے اس لئے میں آپ کو یاد دہانی کراتا رہوں گا جب تک میرے اس ابتدائی منصوبہ کے لئے جتنے آدمی چاہئیں وہ مجھے مل نہ جائیں۔ جتنا مال چاہئے وہ مجھے مل جائے۔ مجھے اپنی ذات کے لئے تو ایک دھیلہ بھی نہیں چاہئے نہ کسی اور کے لئے چاہئے۔ اللہ تعالیٰ کے دین کو فروغ دینے کے لئے ضرورت ہے اس سکیم کے ماتحت تو ساری رقم افریقہ پر یا افریقہ کے لئے خرچ ہوگی۔ پس دوست وقف کی طرف توجہ دیں۔
    تین تحریکیں میں اس وقت کرنا چاہتا ہوں ایک یہ کہ ڈاکٹر واقف زندگی بن کر آگے آئیں دوسرے یہ کہ اچھے ٹیچرز واقف زندگی بنکر آگے آئیں تیسرے یہ کہ جو ہمارا مستقل نظامِ وقف ہے اور واقفین بچے جامعہ احمدیہ میں پڑھتے ہیں اس میں بھی اب دس یا پندرہ یا بیس سے ہمارا کام نہیں چلے گا کیونکہ ضرورت اسلام کے غلبہ کی مہم کو اس سے بہت زیادہ کی ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ کم از کم ۵۰ میٹرک پاس طلبہ اس سال جامعہ احمدیہ میں داخل ہونے چاہئیں اور۱۰۰اگلے سال، پھر شاید ہم اپنی ضرورت کو پورا کر سکیں یہ جو پچاس ہوں گے یا جو سو اگلے سال داخل ہوں گے سات سال کے بعد ان کا نتیجہ نکلے گا اور یہ مبلغ بنیں گے میں نے سوچا ہے کہ یہ جو درمیانی عرصہ ہے اس کے لئے پھر ریٹائرڈ احمدی بہت سارے ایسے ہیں جنہوں نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی کتب کا اچھا خاصا مطالعہ کیا ہوا ہے اور انگریزی بھی جانتے ہیں انہیں باہر بھجوادیں گے کہ جاکر مبلغ کے طور پر کام کرو اور پھر آٹھ دس سال کے بعد پیچھے سے زیادہ تعداد میں ہمارے نوجوان مبلغین آنے شروع ہو جائیں گے۔
    اس سلسلہ میں دوسری بات میں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ بعض لوگ (میں ان کی نیت پر حملہ نہیں کرتا لیکن) ایسا کرتے ہیں اور بڑی شرم آتی ہے کہ ایسے لوگ خدا کو کیا منہ دکھائیں گے اور ہم بھی اگر ہم نے ان کی بات مان لی تو خدا کو کیا جواب دیں گے۔ بڑے آرام سے آکر کہہ دیتے ہیں کہ میرا بچہ نہایت نَخِدْ پڑھائی کی طرف توجہ نہیں دیتا آوارگی اس کے اندر ہے میٹرک میں اس نے لوئر ٹھرڈ ڈویژن کے نمبر لئے ہیں اس لئے ہم چاہتے ہیں کہ آپ اسے جامعہ احمدیہ میں داخل کر لیں۔ اللہ تعالیٰ کے حضور تم وہ بھیڑ پیش کر رہے ہو جس کے اوپر گوشت ہی نہیں اور ہڈیاں بھی اس کی گلی ہوئی ہیں اور آدھ مُوأ چمڑا اس کے اوپر ہے یعنی اس کے اندر کوئی قابلیت نہیں اور آکر کہتے ہیں کہ چونکہ دنیا میں اس کے لئے کہیں اور راستہ نہیں اس لئے آپ اسے جامعہ احمدیہ میں داخل کر لیں۔ ایسا بچہ مبلغ کیسے بن سکتا ہے؟ اس extreme (ایکسٹریم) یا مثال کے بچے کو تو ہم بہرحال داخل نہیں کرتے لیکن اور بہت ساری مثالیں ہیں کہ اس قسم کے لڑکے آکر داخل ہو جاتے ہیں لیکن دراصل نہ اُن کا حق ہوتا ہے نہ اہلیت ہوتی ہے۔
    پھر میرے نزدیک جو اوسط درجہ کا طالب علم آتا ہے یہ بھی درست نہیں دین کے لئے ٹاپ کا،نہایت اعلیٰ درجہ کا ذہن وقف ہونا چاہئے یعنی ایسا ذہن کہ اس سے بہتر کوئی اور ذہن نہ ہو، بہت سارے ایسے لوگ بھی آجاتے ہیں بعض سادگی میں بھی بات کر دیتے ہیں۔ پچھلے سال ایک صاحب جنہوں نے اپنے بچہ دین کے لئے وقف کیا ہوا تھا اُن سے میری ذاتی واقفیت بھی ہے پھر اُن کا کام بھی ایسا ہے کہ وہ مجھے بڑی کثرت سے ملتے رہتے ہیں ان کا بچہ بھی ملتا رہتا تھا اس نے میٹرک میں نہایت اعلیٰ درجہ کی فسٹ ڈویژن لی وہ میرے پاس آگئے کہ یہ بچہ کہتا ہے کہ میرے اتنے اچھے نمبر ہیں مجھے شاید وظیفہ مل جائے مجھے اجازت دیں کہ میں کسی کالج میں داخل ہو جائوں اور سائنس پڑھوں یا کسی اور مضمون میں آگے ترقی کروں مجھے پتہ تھا کہ یہ وسوسہ ہے جو بڑی جلدی دُور ہو جائے گا میں نے مسکرا کر اُن سے کہا کہ نہیں! میں اس کی اجازت نہیں دیتا جیسا کہ تم وقف ہو جاکر جامعہ احمدیہ میں داخل ہو جائو اس قسم کے بعض دوسرے لوگ بھی میرے پاس آتے ہیں۔
    پس ایک تو دین کے لئے ہمیں اچھے ذہن چاہئیں دوسرے معاشرہ کے لحاظ سے جامعہ احمدیہ میں ایک سمویا ہوا گروہ ہونا چاہئے یعنی غریبوں کے بچے بھی ہوں، متوسط خاندانوں کے بچے بھی ہوں اور اچھے امیروں کے بچے بھی وہاں آئیں اگر یہ نہیں ہوگا تو ان کی صحیح تربیت نہیں ہو سکے گی صحیح تربیت کے لئے یہ ضروری ہے کہ غریب اور متوسط اور امیر گھرانوں کا بڑا اچھا تعلق ہو ورنہ تو معاشرہ خراب ہو جاتا ہے۔ میں نے بتایا تھا کہ جو بُعد ہمیں یہاں ایک وزیر اور ایک عام آدمی کے درمیان نظر آتا ہے وہ بُعد افریقہ میں نظر نہیں آتا، ایک عام معمولی آدمی وزیر سے بڑے دھڑلے کے ساتھ جاکر بات کرنے میں ذرا ہچکچاہٹ محسوس نہیں کرتا کیونکہ اُن کا آپس میں کوئی بُعد نہیں مگر یہاں بڑا بُعد ہے یہاں پر وزیر تو الگ رہا وزیر کا چپڑاسی بھی اچھے بھلے شریف آدمیوں کو بعض دفعہ دھکے دے کر باہر نکال دیتاہے لیکن وہاں تو ایک وزیر بھی ایسا نہیں کر سکتا اُن کا معاشرہ ہی ایسا ہے اسے میں اسلام کا معاشرہ تو نہیں کہہ سکتا کیونکہ اسلام کا معاشرہ اس سے بھی زیادہ حسین ہے لیکن ہمارے ملک کے معاشرہ کے مقابلہ میں وہ معاشرہ اسلامی معاشرہ کے زیادہ قریب ہے۔
    پس ہمارا یہ معاشرہ یعنی انسانی مساوات کہ انسان انسان میں کوئی فرق نہیں یہ پوری طرح قائم نہیں ہو سکتا جب تک ہم ہر شعبہ میں یہ ثابت نہ کریں کہ انسان انسان کے درمیان کوئی فرق نہیں اور ایک شعبہ ہمارا جامعہ احمدیہ کا ہے وہاں جو ہمارے Millionaire (میلن اَیر) اگر کوئی ہوں ہماری جماعت میں تو ان کے بچے بھی آنے چاہئیں اور ایک جیسے ماحول میں انہیں تعلیم حاصل کرنی چاہئے اور پھر ایک جیسی پابندیوں کے ساتھ انہیں باہر جاکر تبلیغ کرنی چاہئے تب ہم کہہ سکتے ہیں کہ ہمارے اندر حقیقی معنی میں مساوات قائم ہے۔ اگر دنیا آج ہمیں یہ کہے کہ مساوات قائم کرنے کا دعویٰ کرتے ہو لیکن تمہارا جامعہ احمدیہ جہاں سے تمہارے مبلغ بن کر نکلتے ہیں وہاں غریبوں کے بچے بھی ہیں متوسط خاندانوں کے بچے بھی ہیں لیکن امیر گھرانے کا کوئی بچہ نہیں کیا جواب دیں گے آپ یا کیا میں جواب دے سکتا ہوں؟
    یہ حقیقت ہے اس سے انکار نہیں کیا جاسکتا ہمیں یہ بات تسلیم کرنی چاہئے کہ جامعہ احمدیہ میں صحیح اسلامی معاشرہ کا امکان امراء کی غفلت کے نتیجہ میں پیدا نہیں ہو سکا۔ پس امیروں کا فرض ہے کہ وہ اپنے ذہین بچوں کو جامعہ احمدیہ میں بھجوائیں اور اس کے مطابق ان کی تربیت کریں۔ بعض نے کی ہے مثلاً ہمارے مرزا عبدالحق صاحب بڑے اچھے اور کامیاب وکیل ہیں اللہ تعالیٰ نے ان کو پیسہ بھی دیا ہے ان کا ایک بچہ یہاں جامعہ احدیہ میں پڑھتا رہا ہے آجکل بیچارا جرمنی میں ہے بیچارا میں اس لئے کہہ رہا ہوں کہ وہ مصیبت میں ہے اس کا آگے پڑھائی کا کام نہیں ہو رہا بہرحال وہ جامعہ احمدیہ میں اپنے خرچ پر پڑھا اور پھر جرمنی چلا گیا اب تو اس کا وظیفہ بھی مصر سے آگیا تھا لیکن میں نے اسے ہدایت کی تھی کہ نہیں! اب تم جن تکالیف سے گذرے ہو شاید اللہ تعالیٰ کا یہی منشاء ہو کہ تم جرمن زبان اچھی طرح سے سیکھ لو اس لئے اب جرمنی میں ہی رہو اور جرمن زبان سیکھو۔ خدا کرے اس میں وہ کامیاب ہو جائے زبان سیکھنے کا ملکہ بھی کسی کسی کو ہوتا ہے ہر ایک کو نہیں ہوتا۔
    بہرحال ہمارے جامعہ احمدیہ میں امیروں کے بچے بھی آنے چاہئیں، متوسط طبقہ کے بھی آنے چاہئیں اور غریبوں کے بچے بھی آنے چاہئیں لیکن سارے کے سارے ذہین ہونے چاہئیں اور بڑے مخلص ہونے چاہئیں اور سعیدالفطرت ہونے چاہئیں ویسے تو کسی نے یہ ٹھیکہ نہیں لیا کہ فطرتی سعادت پر انسان ہمیشہ قائم رہے، ٹھوکریں بھی لگ جاتی ہیں۔ بلعم باعور کے قصے بھی ہم نے پڑھے ہیں۔ اچھے اچھے مخلص خاندانوں کے بچے بھی خراب ہو جاتے ہیں اور بعض دفعہ نہایت ذلیل اور کمینے اور دہریہ اور اللہ تعالیٰ کی ہستی سے بیزار اورمذہب سے نفرت کرنے والے گھروں میں متقی اور پرہیزگار اور خدا کا خوف رکھنے والے اور خشیۃ اللہ سے جن کے سینے معمور ہوں وہ پیدا ہو جاتے ہیں اس لئے قرآن کریم نے کہا ہے کہ یہ اللہ ہے جو مردہ سے زندہ کو اور زندہ سے مردہ کو نکالتا ہے یہ چکر تو اپنی جگہ چل رہا ہے لیکن جہاں تک ہمارا تعلق ہے خداتعالیٰ نے فرمایا ہے کہ ظاہر پر اپنا حکم جاری کرو اور اسی کے مطابق فیصلہ کرو۔ پس ظاہری طور پر مخلص، دیندار اور ایثار پیشہ اللہ تعالیٰ سے ذاتی محبت رکھنے والے، حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور حضرت مہدی معہود علیہ السلام کی محبت سے جن کے سینے پُر اور دل منورہوں ایسے بچے ہمیں چاہئیں اور ہر طبقے سے چاہئیں تاکہ ہم صحیح ذہنی اور اخلاقی نشوونما کر سکیں۔ پس اس کے لئے ضروری ہے کہ ایک Representative (ری پری زینٹیٹو) یعنی نمائندہ گروہ جامعہ احمدیہ میں پڑھ رہا ہو۔ سب طبقوں کی نمائندگی کر رہا ہو اور صحیح معاشرہ اور صحیح معاشرہ کے اسباق کی نشاندہی کر رہا ہو۔ آخر انہوں نے باہر جاکر دنیاکا معلم بننا ہے ان میں سے ہر ایک کو یہ پتہ ہونا چاہئے کہ امیر کی تھنکنگ کیا ہے؟ یہ صحیح ہے کہ ہماری تھنکنگ یعنی ہماری سوچ اور فکر کا اسلوب دوسروں سے مختلف ہوگا لیکن ایک امیر کے لڑکے کا اسلوب متوسط اور غریب طبقہ سے بھی مختلف ہوگا وہاں آکر وہ آپس میں سموئے جائیں گے ان کی ذہنی تربیت ہوگی ان کی اخلاقی تربیت ہوگی پھر وہ جو امیر کا بچہ ہے وہ یہ دیکھے گا کہ میں غریب کے بچے کو علم اور شرافت اور اخلاق کے مظاہرے میں آگے نہ نکلنے دوں اس قسم کی مسابقت اور بڑے صحتمند مقابلے کی روح پیدا ہوگی اور غریب کا بچہ کہے گا کہ اللہ تعالیٰ نے اسے مال دیا ہے تو کیا ہوا مجھے اللہ تعالیٰ نے جو دوسری قوتیں اور استعدادیں دی ہیں ان میں میں اس سے آگے نکلوں گا۔
    پس ایسے ماحول میں ہر فرد خوش ہوتا ہے اس لئے اس قسم کے بچے جامعہ احمدیہ میں آنے چاہئیں اور بڑی کثرت سے آنے چاہئیں کیونکہ ہر روز جب سورج طلوع ہوتا ہے تو ہماری ضرورت پہلے دن سے بڑھی ہوتی پاتا ہے لیکن سورج کی آنکھ تو ہماری ضرورت میں وسعتوں کا مشاہدہ کرے اور ہماری آنکھ جو ہے وہ بند رہے اور نابینا بن جائے تو یہ تو کوئی خیر اور خوبی کی بات نہیں ہے۔ ہماری ضرورتیں دن بدن بڑھ رہی ہیں اللہ تعالیٰ کے فضل بڑی وسعت اور شدت کے ساتھ موسلادھار بارش کی طرح ہم پر نازل ہو رہے ہیں اور اللہ تعالیٰ کے جو یہ عظیم اور کثیر انعامات ہم پر ذمہ داریاں عاید کرتے ہیں ان ذمہ داریوں کو نباہنے کی ہمیں ہوش بھی ہونی چاہئے اور ہمارا ارادہ بھی ہونا چاہئے اور ہماری مخلص نیت بھی ہونی چاہئے اور ایثار کا جذبہ بھی ہونا چاہئے یعنی جو ابتدائی چیزیں ہونی چائیں وہ ہمیں اپنے اندر پیدا کرنی چاہئیں پھر ان کے نتائج جو ہیں وہ نکلنے چاہئیں تب جاکر ہم اس کام میں کامیاب ہو سکتے ہیں جو ہمارے سپرد کیا گیا ہے اور وہ یہ ہے کہ جس طرح اسلام کی نشاۃ اُولیٰ میں تمام دُنیا پر اللہ تعالیٰ نے اسلام کو غلبہ عطا فرمایا تھا اپنی جلالی صفات کے اظہار کے ساتھ اسی طرح آج کے زمانہ میں اللہ تعالیٰ کی جلالی صفات ہمارے وجود میں کچھ اس طرح چمکیں کہ دُنیا کی آنکھوں کو خیرہ کرنے والی ہوں اور تمام دنیا کی اقوام کو حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے گرد اکٹھی کر دینے والی ہوں۔ یہ کام ہے ہمارا اور اس سے کم پر نہ ہم اپنے آپ سے خوش رہ سکتے ہیں نہ اللہ تعالیٰ ہم سے خوش ہو سکتا ہے۔ اللہ تعالیٰ ہی کی توفیق سے انسان اس کی رضا کو حاصل کرتا ہے دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ مجھے بھی اور آپ کو بھی توفیق عطا فرمائے ایسے اعمال کے بجا لانے کی کہ وہ ہم سے راضی اور خوش ہوجائے اور وہ وعدے جو اس نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ غلبۂ اسلام کے ہم سے کئے ہیں وہ ہماری زندگیوں میں پورے ہونے لگیں۔
    (از رجسٹر خطبات ناصر ۔ غیر مطبوعہ)
    حقیقی عزت کا سرچشمہ اور منبع
    اللہ تعالیٰ کی ذات ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲۴؍جولائی ۱۹۷۰ ء بمقام مسجد نور راولپنڈی)
    حضور انور کے اس خطبہ جمعہ کا مکمل متن تاحال دستیاب نہیں ہو سکا الفضل میں شائع شدہ خلاصہ درج ذیل ہے۔
    حضور نے فرمایا کہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے ذریعہ تمام بنی نوع انسان کو وحدتِ اسلامی میں منسلک کرکے ان کی عزت اور وقار کو قائم کرنے اور خدائے حیّی و قیوم سے ان کا رشتہ استوار کرانے کا عظیم الشان کام جماعت احمدیہ کے سپرد ہوا ہے۔ آپ نے اس الٰہی منشاء اور اہم دینی فریضہ کے پیش نظر احبابِ جماعت کو پیہم جانی اور مالی قربانی کی تحریک کے ساتھ ساتھ ہر وقت دعائیں کرتے رہنے کی بھی ہدایت فرمائی۔
    حضور نے پہلے قرآن کریم کی چند آیات سے اس امر پر بھی بصیرت افروز پیرایہ میں روشنی ڈالی کہ جماعت مومنین کے خلاف منافقین کی ریشہ دوانیوں کی اصل غرض دُنیوی عزت اور وقار کا حصول ہوتا ہے۔ حالانکہ حقیقی عزت کا سرچشمہ اور منبع اللہ تعالیٰ کی ذات ہے اس لئے حقیقی عزت اسی سے لو لگانے اور اس کی راہ میں ہر قسم کی قربانیاں پیش کرنے سے ملتی ہے۔
    فرمایا۔اللہ تعالیٰ نے حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے محبوب ترین روحانی فرزند حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعے خدائی ہدایت سے محروم اقوامِ عالم کو حلقہ بگوشِ اسلام کر کے ان کی عزت اور احترام کو قائم کرنے کا عظیم الشان کام جماعت احمدیہ کے سپرد فرمایا ہے۔
    ہمارا فرض ہے کہ ہم دلیل اور نمونہ اور دردمندانہ دعاؤں کے ساتھ نہایت حسین پیرایہ میں دُنیا پر یہ ثابت کر دیں کہ حقیقی عزت اور احترام اور اللہ تعالیٰ کا پیار اور اس کی رضا حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کے عشق ومحبت اور آپ کی غلامی میں ملتی ہے۔
    فرمایا۔ اس لحاظ سے ہم پر بہت بڑی ذمہ واری عائد ہوتی ہے۔
    جس سے عہدہ برآ ہونے کے لئے جہاں پیہم جانی اور مالی قربانیوں کی ضرورت ہے وہاں جماعتی ترقی اور غلبۂ اسلام کے لئے نہایت دردوالحاح سے دُعائیں بھی کرنی چاہئیں۔
    مالی قربانی کے ضمن میں حضور نے اپنی اس خواہش کا بھی اظہار فرمایا کہ کیا ہی اچھا ہو کہ جس طرح خلافت احمدیہ پر اس وقت تک ۶۲ سال گزر چکے ہیں اسی طرح’’نصرت جہاں ریزرو فنڈ‘‘ میں پاکستان کی جماعت کی مالی قربانیاں بڑھ کر ۶۲ لاکھ روپے تک پہنچ جائیں۔
    حضور کا یہ روح پرور خطبہ پون گھنٹے تک جاری رہا۔ اس کے بعد حضور نے جمعہ اور عصر کی نمازیں جمع کر کے پڑھائیں اور پھر ازراہِ شفقت تمام احباب کو باری باری شرفِ مصافحہ بخشا۔
    (روزنامہ الفضل ربوہ ۳۱؍جولائی۱۹۷۰ء صفحہ۳)
    ززز


    اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں نبی اکرم ﷺ کو بشارت دی کہ تیرے ذریعہ اقوامِ عالم وحدتِ انسانی میں منسلک کی جائیں گی
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۳۱؍جولائی ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ غیر مطبوعہ)
    تشہد وتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انورنے مندرجہ ذیل آیات کی تلاوت کی:-

    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو فنافی الرسول کا جو مقام حاصل تھا اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ جو قرب میسر تھا وہ امت محمدیہ میں کسی اور کے نصیب میں نہ ہوا، نہ ہوگا۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کو یہ وعدہ دیا اور یہ بشارت دی کہ تیرے ذریعہ سے تمام اقوامِ عالم وحدتِ انسانی میں منسلک کی جائیں گی۔ وہ سب تیرے گرد پیار اور محبت سے گھومیں گی اور تیری اطاعت اور اتّباع میں اپنے محبوب اور مقصود اللہ کی رضا کو حاصل کریں گی۔ اقوامِ عالم کا وحدتِ انسانی میں منسلک ہونے کا کام جیسا کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے وضاحت سے بیان فرمایا ہے۔ مسیح موعود اور مہدی معہود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے زمانہ کے ساتھ وابستہ تھا، کامل دین آگیا اور شریعت مکمل ہو گئی۔ تمام دنیا کو قرآن عظیم میں عظیم بشارتیں دیں۔ لیکن اس وحدت کی طرف دنیا کی اقوام نے صدیوں مزید سفر کرنا تھا اس وقت تک کے لئے جب مہدی معہود دنیا کی طرف معبوث ہوں اور اللہ تعالیٰ کی یہ روشنی ساری اقوامِ عالم کو منور کرنے والی ہو۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت کا حقیقی اور بنیادی فرض ہے ہی یہ کہ تمام اقوامِ عالم کو اسلام کے نور سے منّور کرکے اور اسلام کے حُسن کا گرویدہ بنا کر حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کے پائوں پہ لا ڈالیں باقی تو سب فروعات ہیں وہ راستے ہیں جو مختلف جہات سے ہو کر اس کے ایک مرکز کی طرف رواں دواں ہیں اس وحدتِ اقوامی کے حصول کے لئے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام جو ہتھیار یا ذرائع اور اسباب لا سکتے تھے وہ لائے اس وحدتِ اقوامی کے حصول کے لئے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ تین باتوں کی ضرورت ہے۔ ایک کا تعلق آپ سے نہیں کیونکہ وہ دنیوی بات ہے اس کا تعلق عام انسان کی ترقی اور سائنس کے زیادہ سے زیادہ حقائق کو حاصل کرنے سے ہے۔ مثلاً ہوائی جہازوں کی ایجاد اور سمندری جہازوں کی ایجاد اور ریلیں، موٹریں ہیں۔ ہفتوں میں انسان یہاں سے موٹر میں یورپ وغیرہ میں پہنچ جاتا ہے۔ ہوائی جہاز کے نتیجہ میں سالوں کا فاصلہ ایک دن میں طے ہو جاتا ہے۔ مثلاً ہم جب افریقہ گئے جو یہاں سے سات ہزار میل دور ہے تو اڑان کا وقت ہمارا چھ اور نو قریباً پندرہ سولہ گھنٹے تھا۔ پندرہ سولہ گھنٹے میں جہاز سات ہزار میل دور کے ممالک میں پہنچا دیتا ہے۔ کوئی وقت تھا کہ یہاں سے افریقہ جانے کا خیال بھی انسان نہیں کر سکتا تھا۔ اگر کوئی بہادر اور جری اور علم کے حصول کا جنون رکھنے والا روانہ ہوتا تھا ابن بطوطہ کی طرح تو سالہا سال کے سفروں کے بعد اس کے لئے ممکن ہوتا تھا کہ وہ اپنے گھر کو واپس لوٹ سکے۔ تو وحدت اقوامی کے قیام کے لئے ضروری تھا کہmeans of communication (مینز آف کمیونی کیشن) جسے کہتے ہیں رسل و رسائل اور آپس کے تعلقات کو قائم کرنے کے لئے جن چیزوں کی ضرورت ہے۔ وہ اس حد تک ترقی یافتہ ہو جائیں کہ قوم قوم کے درمیان فاصلہ، مکان کا فاصلہ اور زمان کا فاصلہ جو ہے وہ بہت کم ہو جائے۔ ایسا ہی کم ہو جائے جیسا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں مدینہ سے مکہ تک پہنچنا یا اس سے بھی کم عرصہ میں دنیا کے بہترین حصہ میں انسان پہنچ سکتا ہے۔ تو ایک اس کے بغیر وحدتِ اقوامی کا قیام ممکن نہیں کہ تمام بنی نوع انسان ایک برادری بن جائیں اور ان کا باپ اس دنیا میں محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہو۔ بقیہ دو باتوں کا تعلق حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے ہے آپ فرماتے ہیں کہ ایک تو ایسا زمانہ چاہئے۔ ایک تو یہ ہو کہ رسل و رسائل means of communication (مینز آف کمیونی کیشن) اتنے ہوں کہ تمام دنیا ایک ملک کی طرح بن جائے۔ دوسرے یہ کہ وہ حالات ایسے ہوں اور طبائع میں جوش اس قدر ہو کہ تمام مذاہب اپنے اپنے مذہب کی صداقت کے فیصلہ کے لئے تیار ہوں۔ حالات بھی ایسے ہوں کہ ان کا آپس میں مقابلہ ہو سکے مذاہب کی کُشتی کا امکان پیدا ہو جائے جو اس زمانہ میں ہو گیا۔ ایک تو یہ کہ مذہبی آزادی سوائے ایک تنگ ذہن کے ہر جگہ ہمیں نظر آتی ہے۔ مذہب کی بناء پر آج تلوار نہیں نکالی جا رہی نہ کسی کو قتل و غارت کے میدان میں دھکیلا جا رہا ہے۔ الا ماشاء اللّٰہ ۔ ساری دنیا جو ہے وہ باتوں کو سنتی ہے ہمارے ملک میں تعصب ہے مگر ایک چھوٹے سے حصہ میں ہزار میں سے ایک شخص ہوگا جو اس تعصب کی بیماری میں مبتلا ہوگا۔ ہمارے پاکستان والے بھی تحمل سے بات سنتے ہیں اس زمانہ میں ہم ہی بعض دفعہ سستی دکھاتے ہیں انہیں بات نہیں سناتے، وہ سننے کے لئے تیار ہیں اور کسی پر زبردستی نہیں میرے سامنے جب بھی بعض دفعہ جوش میں آکر احمدی کہہ دیتے ہیں کہ انہوں نے بہت کچھ پڑھا ہے لیکن یہ صاحب جو ہیں وہ سامنے بیٹھے ہوئے ہیں احمدیت کو قبول کرنے کے لئے تیار نہیں تو میںنے انہیں کبھی یہ نہیں کہا کہ تم فارم پر دستخط کرو اور تم بیعت کر لو۔ میں نے انہیں نصیحت کی کہ دیکھو! یہ جو مرضی ہے کہتے رہیں جب تک انشراح صدر نہ ہو تم احمدیت میں داخل نہ ہونا کیونکہ گنتی سے تو کوئی فائدہ نہیں نہ گنتی میں کوئی دلچسپی ہے جیسا کہ ان آیات میں بھی جو میں نے تلاوت کی ہیں بڑی وضاحت سے یہ بیان ہوا ہے تو بات سنتے ہیں اور ہمیں سنانی چاہئے تو جس وقت مذاہب کی کُشتی ہو اس وقت غالب آنے والے مذہب کے پاس اس قدر زبردست دلائل ہونے چاہئیں کہ ان دلائل کے سامنے دوسرے مذاہب ٹھہر نہ سکیں۔ یہ زبردست دلائل تو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کا کام تھا لانا اور آپ لے آئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے دنیا کے تمام بڑے بڑے مذاہب اور سب سے بڑا بدمذہب یعنی دہریت جو ہے اس کے خلاف بڑے بڑے دلائل دے دیئے ہیں لیکن محض دلائل دینا بھی غالب آنے کے لئے کافی نہیں ہوا کرتے۔ دنیا کی تاریخ سے ہمیں پتہ لگتا ہے اس کی تفصیل میں ہمیں جانے کی ضرورت نہیں اس لئے آپ نے فرمایا کہ دوسری چیز جو وحدتِ اقوامی کے لئے ضروری تھی ایسی فضا تھی جس میں مذاہب کی کُشتی امن کی فضا میں ممکن ہو اور جو دلیل اور حجت میں زبردست اور طاقتور ہو اس کی جیت ہو اور وہ دلائل تھے جو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے دیئے اور تیسری چیز جو اس وحدتِ اقوام کے لئے ضروری تھی وہ یہ تھی کہ جس طرح نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم صحابہ کے اس گروہ کو آسمانی نشانات اور تائیدات سے نوازا گیا جو آپ کی زندگی میں اور آپ کے بعد دو تین نسلوں میں پیدا ہوں اس طرح ایک قوم صحابہ سے ملتی جلتی پیدا کی جائے جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کے آسمانی نشانات اور تائیدات کی وارث بنے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کا وجود تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وجود میں اس طرح فانی ہے کہ علیحدہ کوئی چیز ہمیں نظر نہیں آتی اس وجود کی جھلک اس وجود کا حسن اس وجود کا احسان جو ہے وہ ہمیں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے وجود میں نظر آتا ہے اور ان میں کوئی فرق نہیں۔ اور اللہ تعالیٰ نے بھی یہی کہا کہ دیکھنا! فرق نہ کرنا ورنہ پائوں پھسل جائے گا۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے نہ صرف خود بڑی کثرت سے بے حدو حساب آسمانی نشانات دنیا کو دکھائے بلکہ آپ نے دنیا میں یہ اعلان بھی کیا کہ میرے سچے اور کامل متبعین بھی آسمانی نشانوں کے وراث بنیں گے۔ یہاں تک فرمایا کہ میرے کامل متبعین کو اللہ تعالیٰ اس قدر برکت دے گا کہ اگر وہ کسی چیز کو چھوئیں گے تو وہ چیز بابرکت ہو جائے گی قبولیتِ دعا کا نشان ہے۔ یہ ساری ہماری جماعت جو مخلصین کا حصہ ہے (منافقین اور کمزوروں کو نکال کر) ان کو اللہ تعالیٰ یہ نشان دکھاتا ہے ان کے وجود میں برکت رکھی ہے۔ ان کے وجود میں جاذبیت رکھی ہے اثر رکھا ہے جو بے نفس، آپ کو ربوہ کی گلیوں میں گھومتے پھرتے نظر آتے ہیں اور آپ کے دل میں ان کی قدرو شناخت نہیں ہوتی۔ جب وہ باہر جاتے ہیں تو وہاں کے سربراہ مملکت جو ہیں وہ بھی ان کی عزت کرتے ہیں ہم نے خود مشاہدہ کیا وہاں پھر آدمی سوچ میں پڑتا ہے کہ بظاہر تو یہ شخص اس قابل نہیں تھا۔ ہر انسان کی توجہ اس طرف جاتی ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے اللہ تعالیٰ نے ایک وعدہ کیا تھا اور وہ اپنے و عدوں کا سچا ہے اور اس نے اپنے وعدہ کے مطابق حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ السلام کے بے نفس متبعین اور نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے عشق میں مست رہنے والے جو ہیں ان کو یہ اپنا نشان دکھایا ہے اور یہ برکتیں ان کو دی ہیں تو وحدتِ اقوامی کے لئے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام فرماتے ہیں۔ تیسری چیز جو نہایت ضروری بھی ہے وہ الٰہی تائید اور نصرت اور آسمانی نشانات ہیں۔ اور وہ آپ لے کر آئے اور ایک ایسی جماعت آپ نے پیدا کی کہ جو سچا ایمان اور حقیقی اخلاص رکھنے والی بے نفس جماعت تھی اور ان کے ذریعہ سے اللہ تعالیٰ ساری دنیا کو نشان دکھا رہا ہے اور وحدتِ اقوامی کے لئے حالات سازگار کر رہا ہے اس کثرت سے اور اس طرح پھیلے ہوئے ہیں یہ نشانات کہ انسان دیکھ کر حیران رہ جاتا ہے۔ میں نے پہلے بھی بتایا تھا کہ افریقہ میں ہماری ایک بہن تھیں جن پر مجھے اس خیال سے رحم آیا کہ اگر وہ حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کو دعا کے لئے اسی طرح لکھتی رہتی تو اس وقت ان کی مراد پوری ہو جاتی لیکن اللہ تعالیٰ نے یہ نشان بھی دکھانا تھا کہ اس کی شادی کو چالیس ۴۰ سال گذر چکے تھے اورکوئی لڑکا نہیں تھا غالباً کوئی بچہ ہی نہیں تھا اور میری خلافت کے شروع میں انہوں نے دعا کے لئے لکھنا شروع کیا اور شادی کے چالیس سال بعد اللہ تعالیٰ نے اس عورت کو لڑکا دیا۔ سات ہزار میل دور چالیس سال شادی کو ہو چکے۔ انگریز ڈاکٹر تو کہتے ہیں کہ عام عورت پندرہ بیس سال کے بعد بچہ جننے کے قابل ہی نہیں رہتی اور پھر اس عمر میں اللہ تعالیٰ نے اس کو یہ نشان قبولیتِ دعا کا دکھایا۔ وہاں بھی لوگ دعائوں کے نشان دیکھتے ہیں بڑی کثرت سے یہ نشان اللہ تعالیٰ ظاہر کر رہا ہے اس لئے ہمیں علاوہ اور باتوں کے یہ بھی پتہ لگتا ہے کہ تمام بنی نوع انسان کو ایک خاندان بنانے کا وقت آپہنچا۔ یہ بڑا اہم کام ہے یہ بنیادی کام ہے دراصل یہی کام ہے باقی جیسا کہ میں نے کہا شاخیں ہیں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے جو دوسرے کام ہیں اس مقصد کے حصول کے لئے مختلف شاہراہیں ہیں جو اللہ تعالیٰ نے تیار کی ہیں۔ مختلف دروازے ہیں جو اس کے اندر ہمیں لے کر جا رہے ہیں اصل چیز یہ ہے کہ ہم نے تمام انسانوں کو الا ماشاء اللہ نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پیار کے بندھن میں باندھ دینا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام فرماتے ہیں۔ جو اسلام سے باہر رہ جائے گا ان کی حالت چوہڑوں چماروں کی طرح ہوگی۔ اگر لاہور کی آبادی کا مقابلہ چوہڑوں چماروں سے کریں تو شاید ایک فیصدی ہوں یا دو فیصدی ہوں یہ نہ ہونے کے برابر ہے جو ان کی حیثیت ہوگی اس کام کو کرنے کے لئے اور اس مقصد کے حصول کے لئے ایک جنون کی ضرورت ہے ایسا جنون جو دنیاکے تمام اصولوں کوتوڑ کر پرے پھینک دے اور یہ کہے کہ میں ان کا پابند نہیں ہوں میں اللہ کا عاشق ہوں اور میں اپنے اس عشق کے مطابق دنیا میں کام کروں گا۔ اللہ تعالیٰ نے ان آیات میں جو مضمون بیان کیا ہے وہ لمبا ہے میں اس کے بعض پہلو لوں گا۔ اس میں یہ فرمایا ہے کہ جو قوم اللہ تعالیٰ کے منشاء کو پورا کرنے کے لئے قائم کی گئی ہے اسے بھی یاددہانی کرانی پڑتی ہے اور اس میں کمزور بھی ہوتے ہیں ان کو جھنجوڑنا پڑتا ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ تم نے ایمان کا دعویٰ کیا ہے لیکن جب تمہیں کہا جاتا ہے کہ جہاد فی سبیل اللہ کے لئے اپنے گھروں اور اپنے وطنوں سے نکلو ’’ اِثَّا قَلْتُمْ اِلَی الْاَرْضِ‘‘ تمہاری طبیعت یا تم میں سے بعض جو ہیں وہ ’’الارض‘‘ کی طرف جس کے معنے حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ نے ’’وطن‘‘ بھی کئے ہیں۔ یعنی وطن کی محبت آڑے آتی ہے۔ وہ کہتے ہیں ہم اپنے وطن کو کیسے چھوڑیں اور وطن کی محبت میں ہی گھر کی خاندان کی بیوی بچے کی محبت شامل ہے۔ کیونکہ انہیں محبتوں کا مجموعہ وطن کہلاتا ہے۔ وطن کی محبت کوئی علیحدہ چیز تو نہیں ہے کسی کو بیوی بچوں کی فکر ہوتی ہے کسی کو مال و دولت کی فکر ہوتی ہے۔ کسی کو کچھ اور کسی کو کچھ۔ ان کے اندر فکر پید اہو جاتا ہے اور وہ کیفیت نہیں رہتی جس کے نتیجہ میں انسان کے لئے روحانی رفعتوں کی طرف پرواز کرنا ممکن ہو۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ تم سے ہم نے جو وعدہ دیا ہے وہ یہ ہے کہ دین اور دنیا کی حسنات تمہیں ملیں گی۔ اگر تم ہمارے قول کے مطابق، ہماری ہدایت کے مطابق، ہمارے حکم کے مطابق اپنی زندگیوں کو گذارو گے وہ حسنات دارین کا وارث کرے گا اور تم صرف ایک بہتری کے پیچھے پڑ جاتے ہو اس دنیا کی جو مجموعی طور پر جو تم سے وعدہ کیا گیا ہے اس کا کروڑواں اربواں کھربواں حصہ بھی نہیں کیونکہ اخروی زندگی جو ہے وہ نہ ختم ہونے والی ہے اور اس کی نعمتیں اگر دنیا کی فرض کر لو نعمتوں کا ۴؍۱ بھی ہوں تو اسیّ (۸۰) سال کی زندگی میں جو نعمتیں اس دنیا کی ملیں ۲۴۰ سال میں اُس دنیا میں وہ نعمتیں مل جائیں گی اور پھر بعد میں بے شمار زمانہ پڑا ہے نعمتوں کے حصول کا۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے اخروی نعماء کے مقابلہ میں اس دنیا کی نعمتیں اور آرام اور آسائش اور عیش و عشرت جو ہے وہ کچھ حقیقت نہیں رکھتا۔ نہ ہونے کے برابر ہے لیکن تم اس حقیقت کو بھول جاتے ہو اور خدا کی آواز پر لبیک کہتے ہوئے ان قربانیوں کے دینے میں ہچکچاہٹ محسوس کرتے ہو جن کا تم سے مطالبہ کیا جاتا ہے۔اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ اگر تم ہماری آواز پر لبیک کہتے ہوئے نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی نصرت اور مدد کے لئے آگے نہیں بڑھو گے تو اس دنیا کی خاطر تم ایسا کر رہے ہوگے اور ہم اس دنیا میں تمہیں عذاب دیں گے۔ جس چیز کی تمہیں تلاش ہے وہ تمہیں اس دنیا میں نہیں ملے گی۔ اِلَّا تَنْفِرُوْا یُعَذِّبْکُمْ عَذَابًا اَلِیْمًا تمہیں اللہ تعالیٰ ایک درد ناک عذاب پہنچائے گا۔ اور دوسری متعدد جگہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ خداتعالیٰ کا عذاب اس دنیا میں بھی اور اخروی زندگی میں بھی ظاہر ہوتا ہے لیکن یہ سمجھنا کہ تم اگر بے وفائی کرو گے اور نفاق کی راہوں کو اختیار کرو گے تو اللہ تعالیٰ کا منشاء پورا نہیں ہوگا۔ اللہ تعالیٰ کی تقدیر جو ہے اس کے راستے میں روک پیدا ہو جائے گی۔ ایسا ہرگز نہیں ہوگا یَسْتَبْدِلْ قَوْمًا غَیْرَکُمْ اللہ تعالیٰ تو قادر ہے کہ وہ تمہیں مٹا دے گا اور ایک اور قوم لے آئے گا۔ وہ قوم تمہاری طرح ایمان کی کمزور اور دل کی منافق نہیں ہوگی۔ وہ عاشق ہوگی اپنے رب کی اور پیار کرنے والی ہوگی اس کے محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے۔ وہ قربانیاں دے گی بشاشت کے ساتھ جن کا ان سے مطالبہ کیا جائے گا۔ اور پھر وہ اس دنیا کی حسنات کے بھی وارث ہوں گے اور اس کی بھی حسنات کے وارث ہوں گے۔ لَاتَضُرُّوْہُ شَیْئًا تم نے کیسے سوچ لیا کہ اللہ تعالیٰ ایک تقدیر اس دنیا میں جاری کرنا چاہے اور تم اس کے رستے میں روک بنو۔ تم روک نہیں بن سکتے اس کو کوئی نقصان نہیں پہنچا سکتے کیونکہ اللہ تعالیٰ جس چیز کو چاہتا ہے کر گذرتا ہے ہر چیز پر قادر ہے وہ۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ میری یہ مدد محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور اس کے خلفاء کو حاصل ہوتی رہے گی یہاں پر ’’دو‘‘ کا ذکر ہے (نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم اور ان کے خلفاء کا) ظاہری طور پر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ ہیں۔ لیکن معنوی طور پر آپ کا خلیفہ ہے۔ یہ اللہ تعالیٰ کی شان ہے کہ اس غار میں اور اس سفر میں نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کا ساتھی کسی دوسرے مخلص کو نہیں بنایا بلکہ اس کو بنایا جس نے پہلی خلافت کی کرسی کے اوپر متمکن ہوناتھا۔ اور اس طرح ہمیں یہ بتایا کہ اللہ تعالیٰ کی مدد اس کے رسول اور اس کے خلیفہ کو پہنچتی ہے اور خلیفۂ وقت کو کہا کہ تم جماعت کی طرف نہ دیکھنا کہ اگر تم اکیلے رہ گئے۔ جس طرح حضرت نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے ساتھ تھے۔ خلافت راشدہ میں ہر خلیفہ کے ساتھ نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اسی طرح ہیں۔ ثانی اثنین کیونکہ آپ کے بغیر آپ سے بُعد میں، آپ سے دوری میں، آپ سے قطع تعلق کرکے خلافت راشدہ نہیں رہی۔
    ثانی اثنین میں جہاں تک آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا سوال ہے خلافت راشدہ میں آپ ساتھ ہیں اور جو دوسرے ہیں وہ معنوی لحاظ سے آپ کے ساتھ ہیں۔ اسی واسطے قرآن کریم نے حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نہیں کہا نام نہیں لیا۔ بلکہ کہا ایک ساتھی کے ساتھ۔ دو میں دوسرا تھا۔ ظاہری جسم کے لحاظ سے وہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ تھے اور مقام کے لحاظ سے پہلے خلیفہ تھے امت مسلمہ کے، تو اللہ تعالیٰ نے فرمایا تم مدد کرو یا نہ کرو۔ میری مدد نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور آپ کے خلیفہ کے ساتھ رہے گی اور اگر تم مدد نہیں کرو گے تو آسمان سے ایسی فوجیں اُتریں گی جو کمزوریٔ ایمان کے نتیجہ میں تمہیں نظر نہیں آئیں گی اور وہ مدد کر رہی ہوں گی۔ جب ایسی فوجیں بہت سے موقعوں پر اُتریں تو جن کے ایمان مضبوط تھے ان کو نظر آرہی تھیں وہ فوجیں، بڑی کثرت سے صحابہ نے ا ن فوجوں کے متعلق باتیں کیں کہ ہم نے یوں دیکھا ہم نے یوں دیکھا۔ ڈرانے کے لئے استثنائی طور پر کافروں کو بھی بعض چیزیں اللہ تعالیٰ نے دکھا دیں۔ لیکن مومنوں کے دلوں کو مضبوط کرنے اور ان کو اور بھی ہشاش بشاش کرنے کے لئے اللہ تعالیٰ نے ان کو وہ نظارے دکھائے۔ ایمان کی پختگی کے نتیجہ میں لیکن جو کمزورایمان والا یا منافق ہے اور وہ جس کے دل کے اندر ابھی تک ایمان داخل نہیں ہوا۔ اس کو یہ آسمانی فوج نظر نہیں آتی۔ لیکن وعدہ ہے اور یہ وعدہ پورا ہو رہا ہے۔ اب حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ نے افریقہ میں جو کارنامہ کیا اپنی خلافت میں اور ہم نے وہاں دیکھا۔ اگر ہم ان مبلغین کی طرف دیکھیں جن کو اللہ تعالیٰ نے وہاں خلوص کے ساتھ ایثار اور قربانی کی توفیق عطا کی تو وہ نتیجہ نہیں نکل سکتا جو ہمیں نظر آیا۔ اس سے ہزارواں حصہ شاید کم نکلتا۔ اگر عمل اور اس کے نتیجہ پر نگاہ کی جائے لیکن عمل ایک اور نتیجہ ایک ہزار۔ اسی کا مطلب یہ ہوا کہ نو سو ننانوے نتیجہ پیدا کرنے کے لئے اللہ تعالیٰ نے آسمان سے فوجوں کو نازل کیا اور وہ نتائج ہمیں بتاتے ہیں کہ آسمان سے ملائکہ کا نزول ہوا اور اُنہوں نے اس وعدہ کے مطابق جو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو دیا گیا تھا۔ غلبۂ اسلام کے سامان پیدا کئے۔ اس وقت اللہ تعالیٰ خلافت ثالثہ کے ذریعہ دلائل کے ساتھ اور آسمانی نشانوں کے ساتھ غلبۂ اسلام کے زیادہ سے زیادہ سامان پیدا کرتا جاتا ہے اور کرتا چلا جائے گا۔ جب تک کہ وہ آخری غلبہ اسلام کو حاصل نہیں ہو جائے گا جس کے لئے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام مبعوث ہوئے ہیں اور تمام بنی نوع انسان جب تک اسلام میں داخل ہو کر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کے فدائی نہ بن جائیں۔ اس غلبہ کے حصول کے لئے جس جہاد کی ضرورت ہے وہ تلوار کا جہاد نہیں کیونکہ اسلام کے خلاف تلوار میان سے نہیں نکالی گئی۔ نہ مذہب کو تباہ کرنے کے لئے ایٹم بم استعمال کیا جاتا ہے۔ دشمن قوم کو تباہ کرنے کے لئے ایٹم بم تو استعمال کیا جاتا ہے اور ہونا بھی یہی چاہئے کیونکہ اس کی ہلاکت کا جسموں پر اثر ہے۔ لیکن مذہب کے مقابلہ میں ایٹم بم نہ استعمال کیا جاتا ہے نہ استعمال کیا جا سکتا ہے۔ کیونکہ جیسا کہ میں نے یورپ کو کہا آپ بھی بتایا کہ ساری دُنیا کے ایٹم بم اور ہائیڈروجن بم مل کر بھی ایک دل میں کوئی تبدیلی پیدا نہیں کر سکتے۔ لاکھوں کروڑوں کو تباہ کر سکتے ہیں اس میں کوئی شک نہیں لیکن ایک دل میں وہ تبدیلی پیدا نہیں کر سکتے۔ دل میں تبدیلی پیدا کرنا اللہ تعالیٰ کے فضل سے ہوا کرتا ہے۔ وہ فضل اللہ تعالیٰ نے ہمارے ساتھ شامل کر دیا ہے ہم اس کی حمد کرتے ہیں اور ہم حمد کر نہیں کر سکتے ۔ ہم عاجز بندے ہیں اتنا انعام ہم پر وہ کر رہا ہے۔
    بہرحال جو غلبۂ اسلام کے سامان پیدا ہو رہے ہیں اور جس طرح ایک وقت میں جب مضبوط ہو گئی عرب کی قوم۔ عرب میں جو مسلمان تھے ان کو طاقت ہوئی۔ ارتداد کا فتنہ اُٹھا وہ فتنہ دبا دیا گیا اور پھر عرب اسلام کے جھنڈے تلے متحد ہو گیا۔تب اللہ تعالیٰ نے یہ سامان پیدا کیا کہ اس وقت کی جو معلوم دُنیا تھی اس پر غالب آیا۔ چھیڑ چھاڑ شروع کی ایرانیوں نے بھی اور رومیوں نے بھی اور مسلمانوں کو اس کا مقابلہ کرنا پڑا۔ ان حالات کے لحاظ سے جو نہایت اعلیٰ تلواریں یعنی ایرانیوں اور رومیوں کے پاس ، وہ کند تلواریں اور گندے لوہے کی تلواریں اس کے مقابلہ میں اللہ تعالیٰ نے کہا نکالو! کیونکہ تلوار کے لوہے نے فیصلہ نہیں کرنا۔ میرے حکم نے فیصلہ کرنا ہے۔ آدمی تاریخ پڑھتا ہے تو حیران ہو جاتا ہے۔ خالد بن ولید تھے بڑے مخلص، بڑے سمجھدار اور قرآن کریم کے رموزو اسرار سے واقف، کیونکہ اگر ان کی تقریریں پڑھیں تو آدمی ان سے یہی نتیجہ اخذ کرتا ہے کہ وہ نڈر فدائی تھے اور بعض دفعہ ایک ایک جنگ میں نو نو تلواریں ان کے ہاتھ سے ٹوٹ جاتی تھیں۔ یہ اللہ تعالیٰ کا معجزہ ہے کہ سپاہی لڑ رہا ہو اس کے سامنے دشمن ہو اور تلوار ٹوٹ جائے اور پھر بھی اس کی جان کی حفاظت ہو تو اللہ تعالیٰ فرشتوں کے ذریعہ ان کی حفاظت کرتا تھا لیکن اس سے پتہ لگتا تھاکہ ان کی تلواریں ان کے مقابلہ میں کچھ حیثیت نہیں رکھتیں۔ نو نو تلواریں ایک دن میں ایک معرکہ میں شاید ایک گھنٹہ کے اندراندر ٹوٹ جاتی تھیں کیا کرتے بیچارے جو ان کے پاس تھا وہ اپنے رب کے حضور پیش کر دیتے تھے۔ لیکن اللہ تعالیٰ ان کی حفاظت کرتا تھا۔ آسمان سے ان پر فرشتے نازل ہوتے تھے۔ پھر رومیوں کے ساتھ ان کمزور فدائیوں کو لڑنا پڑا۔ڈیڑھ ڈیڑھ لاکھ اور دو دو لاکھ فوج کے مقابلہ میں بیس تیس پینتیس ہزار بعض دفعہ پانچ ہزار بعض دفعہ دس ہزار کی فوج جاتی تھی اور اللہ تعالیٰ ان کو فتح دیتا تھا اور کثرت کا خیال نہیں رکھتا تھا کیونکہ جو سبق دیا گیا تھا ان آیات میں جس کا ذکر ہے وہ تو یہ ہے کہ اگر وہ محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور آپ کے خلیفہ جیسی حیثیت رکھیںگے اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں ساری دُنیا پر غالب ہوں گے وہ مقابلہ تو دو کا تھا ساری مخالف دُنیا کے ساتھ۔ جس میں اللہ تعالیٰ نے کامیاب کیا۔ اس وقت کچھ مراکز بنے۔ ساری دُنیا میں اسلام کے غلبہ کے لئے۔ ایک تو ایران کا ملک تھا جس کے ماتحت عراق بھی تھا۔ عراق کے ورلے حصے جو عرب سے ملتے تھے وہ Base(بیس) بنی وہ ایک Camp(کیمپ) بنا۔ ان حصوں کی طرف فاتحانہ یلغار کا اور دوسری طرف شام بنا۔ میں سوچتا ہوں اور طبیعت پر یہ اثر ہے اورحضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کی طبیعت پر بھی یہی اثر تھا کہ ایک Base(بیس) ہماری افریقہ ہے اور اس وقت ہماری حالت دُنیوی مماثلت کے لحاظ سے وہ ہے جو عراق کے ورلے علاقہ میں مسلمان فوجوں کی تھی۔ جس وقت وہ عرب سے باہر نکلے اور اُنہوں نے آزادیٔ ضمیر کی خاطر ایران جیسی زبردست سلطنت سے ٹکر لی۔ وہاں حالت ابھی نہیں آئی کچھ بدل گئے ہیں روم کی حالت ہے کیونکہ روم میں کسریٰ سے لڑائی ہوئی۔ ہماری پہلی لڑائی ایسا معلوم ہوتا ہے عیسائی مذہب سے ہو گی جس طرح رومیوں کے ساتھ مسلمانوں کی لڑائی ہوئی۔ویسے تاریخ کے لحاظ سے وہ دوسری لڑائی ہے مسلمانوں سے۔ اس زمانہ میں اور ہماری دوسری لڑائی دھریوں سے ہو گی جیسا کہ ایران میں مسلمانوں کی لڑائیاں ہوئیں کیونکہ وہاں آتش پرست تھے۔ خدائے واحد ویگانہ کو ماننے والے نہ تھے۔ رومی جو تھے وہ تثلیث کے بھی قائل تھے۔ بیچ میں یونیٹیرین بھی تھے۔ بہرحال وہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ایک نازل شدہ شریعت اور ہدایت کے ماننے والے تھے۔ یعنی شریعت ان کو حضرت موسیٰ علیہ السلام نے دی تھی اور ہدایت ان کو حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے دی تھی۔ اس وقت جو ابتدائی ہماری جنگ غلبۂ اسلام کے سلسلہ میں ہے وہ ہم نے افریقہ میں لڑنی ہے اور افریقہ میں مغربی افریقہ ہمارے لئے Camp(کیمپ) اور Base(بیس) بنے گا اور بن رہا ہے۔ اس جنگ کے لئے میں نے مالی اور جانی جہاد کی ندا دی ہے۔ آپ کو اس کی طرف بلایا ہے اور میں خوش ہوں اور اللہ تعالیٰ کا بڑا فضل دیکھتا ہوں کہ جماعت کی بڑی بھاری اکثریت نے انتہائی فدائیت اور جان نثاری کا ثبوت دیا ہے۔ جانی میدان میں بھی اور مالی میدان میں بھی۔ ایک مہینہ نہیں گزرا ابھی پہلے سترہ دن میں تو سترہ لاکھ روپیہ (نصرت جہاں ریزرو فنڈ)میں ہو گیا تھا اورجتنے ٹیچر چاہئے تھے ان سے زیادہ ہمارے پاس آگئے ہیں۔ اور ڈاکٹروں کی کچھ کمی تھی وہ پوری ہو گئی اور مالی لحاظ سے ٹیچر بھی اور دوسرے بھی۔ لیکن جس قسم کی مذہبی جنگ جو دلائل اور آسمانی نشانوں کے ساتھ لڑنی اور جیتنی ہے اللہ کے فضل سے اس کی توفیق سے، اس کے لئے۔ پتہ نہیں کل کو کتنے آدمیوں کی ضرورت ہو گی۔ ڈاکٹروں کی ضرورت ہو گی۔ ٹیچر اور مبلغین کی بھی۔او ر یہ تو یقینی بات ہے جس قسم کے اس وقت ہمارے پاس نہیں۔ ان سے زیادہ مخلص فدائی اور جنونی آدمی ہمیں چاہئیں۔ ہمارا نظام ’’رٹ‘‘ کے اندر جس کو کہتے ہیں رستہ بنایا ہوا ہے پہیہ اس میں پڑ گیا ہے۔ حالانکہ ہمارا ماحول اور ہماری ضرورت اور ہمارے مخالف کا جو طریق جنگ ہے ہمیں اس رٹ سے پہیہ اس نشان سے باہر نکالنا ہے اور ہم نے دفاع نہیں کرنا کیونکہ دفاع کا وقت گزر گیا۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے خود تیس ہزار سے زیادہ اعتراض عیسائیوں کے اکٹھے کئے اور ان کا جواب دیا۔ اب عیسائی جو ہے وہ اپنا دفاع کر رہا ہے اور ہم اس کے اوپر حملہ آور ہیںاور اس حملہ میں ہماری وہ فراست ہونی چاہئے جو دوسری جنگ میں حضرت خالد بن ولید رضی اللہ عنہ میدان جنگ میں دکھایا کرتے تھے۔ اس قسم کی فدائیت چاہئے۔آدمی حیران ہو جاتا ہے کہ بعض دفعہ ایسی جھڑپیں ہوئیں کہ مسلمان چار ہزار اور دشمن سولہ ہزار اور بہرحال ان کو زیادہ قربانی اس لحاظ سے بھی دینی پڑتی تھی کہ ان کی تو باہیں شل ہو جاتی تھیں۔ وہ دشمن چار ہزار پیچھے ہٹا لیتے تھے اور تازہ دم چار ہزار لڑنے کے لئے آگے بھیج دیتے تھے۔ تو چاروں ٹکڑیوںکے ساتھ ایک ٹکڑی کو لڑنا پڑتا تھا کیونکہ وہ ان سے چار گنے زیادہ تھے اس کے باوجود تاریخ لکھتی ہے کہ قریباً ساری رات وہ قرآن کریم کی تلاوت اور نوافل میں گزارتے تھے اور صبح کے وقت میدان جنگ میں چلے جاتے تھے تو ان کی قوت اور طاقت کا منبع اور سرچشمہ نیند اور آرام یا کھانا نہیں تھا بلکہ اللہ تعالیٰ کے فضلوں کو جذب کرنے کی کوشش تھی۔ اس طرف ہمارے بہت سے مبلغ ہیں جو توجہ دے رہے ہیں لیکن ایسے بھی ہیں جو توجہ نہیں دے رہے اگر تم نے اپنے جسم اور روح کی طاقت اللہ تعالیٰ سے حاصل نہ کی تو تمام ادیان کے مقابلہ میں جو جنگ تم لڑ رہے ہو۔ اس کی طاقت تم کیسے پاؤ گے تم لڑ ہی نہیں سکتے تمہارے جسم تمہارے ذہن تمہارے حافظے اور تمہاری ذہنی اور روحانی قوتیں جو ہیں وہ اتنی کمزور ہوں گی(اس منبع سے کٹ کر) کہ تم غالب نہیں آسکتے اپنے مخالف پر۔ تم ناکارہ سپاہی تو کہلا سکتے ہو۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اس فوج کا جو آج ساری دُنیا سے برسرِ پیکار ہے۔ روحانی اور علمی لحاظ سے لیکن تمہیں کار آمد وجود اس فوج کا نہیں کہہ سکتے ۔تمہیں اپنا تعلق اپنے پیدا کرنے والے رب سے مضبوط کرنا پڑے گا۔ اور اپنی ساری طاقت اس سے حاصل کرنی پڑے گی۔ اور اپنے نفس کو مارنا پڑے گا۔ اور ایک نئی زندگی اس سے پانی پڑے گی۔ تب تم جا کر اس میدان میں فتح حاصل کر سکتے ہو۔ ورنہ نہیں کر سکتے تو ہمارے جو مبلغ ہیں اور رضا کار ہیں ان کو اس طرف توجہ دینی چاہئے ورنہ ان کا وجود ایک ناکارہ وجود ہے بے ثمروجود ہے جس کا کوئی نتیجہ نہیں نکل سکتا اور نہ ہی نکل رہا ہے۔ ایسے جو ہیں۔ لیکن اگر اللہ تعالیٰ سے ہمارا پختہ تعلق ہو اور اگر ساری طاقتوں کا منبع اور سرچشمہ ہم اس ذات کو سمجھیں اور اس کے حضور عاجزانہ جھک کر اور اپنے پر ایک موت وارد کر کے اس کو کہیں کہ اے خدا ہمارا کچھ نہیں ہماری زندگی بھی نہیں ہم ایک مردہ لاشہ کی طرح ہیں ہم تیرے دین کے غلبہ کے لئے اپنی خدمات کو پیش کرتے ہیں۔ تو ہمیں نئی زندگی اور نئی طاقت اور نئی فراست کے نور سے ہمارے سینوں کو بھر دے اور ہم میں وہ برکت ڈال۔ جس برکت کا تو نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی روحانی قوت کے نتیجہ میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام سے وعدہ کیا۔ اگر اس طرح ہم اللہ تعالیٰ سے زندہ تعلق کو پیدا کر سکیں اور ساری طاقتیں اس کے قدموں میں پھینک کر اس سے طاقت حاصل کریں تو ہم کامیاب ہو سکتے ہیں۔ورنہ ہم کامیاب نہیں ہو سکتے تو جو نئے آنے والے ہیں ان کو بھی میری یہ نصیحت ہے اور جو پرانے آئے ہوئے ہیں ان کو بھی میں یہ یاد دلانا چاہتا ہوں کہ تمہارے اندر کوئی ایسی طاقت نہیں ہے کہ تم عظیم جہاد میں کامیاب جرنیل ثابت ہو سکو۔ اگر تم نے اللہ تعالیٰ کی رضا کو حاصل کرنا اور دُنیا میں اپنے مقصود کو پانا ہے اور اگر تم چاہتے ہو کہ واقع میں اسلام دُنیا میں غالب آجائے تو اپنے اوپر ایک موت وارد کر کے اپنے رب سے ایک نئی زندگی پاؤ۔ تب تم واقع میں اللہ تعالیٰ کی رضا اور اس کی جنت کو بھی پاؤ گے اور دُنیا میں آنے والی نسلیں تمہیں عزت اور احترام کے ساتھ یاد کریں گی۔ ورنہ جس طرح دُنیا ابی ابن سلول کو نہیں بھولی تم میں سے بعض کو نہیں بھولے گی۔ خواہ وہ اپنے زعم میں خود کو کتنا ہی قابل عزت اور قابل احترام بھی نہ سمجھتا ہو اس طرح تمہیں بھی یاد رکھے گی۔ لیکن خالد بن ولید رضی اللہ عنہ کی طرح۔ ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ کی طرح۔ سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہ کی طرح تمہیں یاد نہیں رکھے گی۔اس سے بڑھ کر حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ کی طرح حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی طرح حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کی طرح حضرت علی رضی اللہ عنہ کی طرح جس طرح ان بزرگ فدائیوں کو جو ثانی اثنین تھا ہر ایک کو اُنہوں نے یاد رکھا۔ اس طرح تمہیں یاد نہ رکھے گی لیکن اگر تم محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں فنا ہو کر اپنا سب کچھ خداتعالیٰ کے قدموں میں ڈال دو تو خداتعالیٰ کی رحمت آسمانوں سے تم پر نازل ہو گی اور وہ فوجیں اُتریں گی جنہیں تم تو دیکھو گے لیکن دُنیا نہیں دیکھ رہی ہو گی نہ کمزور ایمان اور منافق انہیں دیکھ رہا ہو گا۔ نتائج ظاہر کر رہے ہوں گے کہ ایک انقلابِ عظیم آیا ہے اس کے پیچھے کوئی ہاتھ ہونا چاہئے لیکن وہ ہاتھ نظر نہیں آرہا ہو گا کیونکہ وہ غیر مرئی ہاتھ اللہ تعالیٰ کے فضل اور اس کی رحمت کا ہو گا جسے یہ انسان اور اس کی آنکھ نہیں دیکھا کرتی۔اور جو مالی مطالبہ ہے میں سمجھتا ہوںاور میری خواہش ہے کہ اسے اتنے لاکھ ہو جانا چاہئے جو خلافت احمدیہ کے سال ہیں۔ یعنی اس وقت تک دو خلافتیں اور کچھ سال پتہ نہیں کب تک میں نے زندہ رہنا ہے لیکن اس وقت تک جو زندگی اللہ تعالیٰ مجھے دے چکا ہے۔ اس کو پہلی دو خلافتوں کے سالوں میں شامل کر کے جتنے سال بنتے ہیں تقریباً ۶۲ سال۔ اتنے لاکھ (چندہ نصرت جہاں ریزرو فنڈکا) ہونا چاہئے اور جانی قربانی اتنی کثرت سے اور اسقدر ایثار سے ہونی چاہئے کہ اگلے پانچ سال، پچھلے ساٹھ سالہ ظاہری ترقی کے مقابلہ میں زیادہ ہوں یعنی اگلے پانچ سال میں اتنی Base(بیس) کو اپنے حملہ کے لئے جو تیاری ہو یعنی آخری کامیاب حملہ کی جو تیاری ہو اس کے لئے اس قدر تیار کر لیں کہ آہستہ آہستہ بتدریج اللہ تعالیٰ نے جو ترقی دی تھی۔ اگلے پانچ یا دس سال میں ہم اس سے آگے نکل جائیں۔ یہ ضروری ہے کامیابی آئے محض ترقی ضروری نہیں۔ محض اپنی رفتار کو قائم رکھنا یہ کافی نہیں بلکہ ہر دوسرا قدم پہلے سے آگے بڑھنا چاہئے اور اس کو انگریزی میں Momentumکہتے ہیں۔یعنی ہر سال کوشش اور اس کا نیتجہ پہلے سال سے دُگنا ہونا چاہئے تب ہم جا کر اگلے دس سال میں اسی چیز کو حاصل کر سکتے ہیں جو ہم حاصل کرنا چاہتے ہیں او ر جس کے حصول کو اللہ تعالیٰ نے بالکل ممکن بنا دیا ہے۔ جو میں وہاں دیکھ کر آیا ہوں آدمی کثرت سے آئیں مخلص آئیں ایسے آئیں کہ جو فدائی ہوں۔ بے نفس ہوں مردہ ہوں دُنیا کی نگاہ میں اور اللہ تعالیٰ سے زندگی کو حاصل کرنے والے ہوں۔
    خدا کرے ایسا ہو۔ خدا کرے کہ ہماری آج کی جو ذمہ داری ہے اس کو ہم نبھا سکیں۔ آج ہم انتہائی طور پر نازک دور میں سے اس معنی میں گذر رہے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے ہماری عظیم کامیابیوں کے لئے دُنیا کی فضا کو ہمارے لئے بہتر بنا دیا ہے۔ اور اس تبدیلی کا جو امکان ہے اس تبدیلی کو عملی شکل دینا یہ ہمارے سپرد کر دیا ہے۔ تو اللہ تعالیٰ نے قریباً پھل تیار کر کے اس طرح جس طرح دس فٹ کے اوپر اس درخت کا پھل پک جائے جو خود بخود نہیں گرا کرتا۔ یعنی ٹپکا نہیں ہوتا۔ بعض ایسے درخت ہوتے ہیں جس کا پھل ٹپکا نہیں ہوتا۔ آم تو ٹپک پڑتا ہے۔ بعض پھل پکنے کے بعد بھی درخت کے ساتھ لگے رہتے ہیں۔ تو جو دس فٹ اوپر پھل ہے اور پک جاتا ہے اس کو توڑنا انسان کا کام ہے۔ پھل پک چکا ہے لیکن گرے گا نہیں۔ جس طرح میں نے افریقنوں کو کہا تھا ایک مضمون کے سلسلہ میں آپ کو بھی میں یہ کہتا ہوں کہ اسلام کی کامیابی کے جو مختلف دور ہیں اور جن مدارج میں سے ہم نے گذرنا ہے۔ سیڑھی بہ سیڑھی چڑھ کر بہت عظیم انقلاب ہمارے سامنے ہے۔ مقدر ہو چکا ہے لیکن اس Destiny(ڈسٹنی) اس تقدیر کا پھل ہم نے توڑنا ہے۔ ہماری گود میں نہیں گرے گا۔ پھل تیار ہے۔ رفعتوں کو آپ حاصل کریں اور پھل کو پالیں۔اِثَّا قَلْتُمْ اِلَی الْاَرْضِ خدا نخواستہ ہماری ذہنیت ہو تو جو بلندیوں میں پھل تمہارا انتظار کر رہا ہے زمین پر گر جانا یا زمین کے ہو جانے سے وہ پھل تمہیں نہیں مل سکتا۔ ایسا نہ کبھی ہوا نہ ہو سکتا ہے اور نہ کبھی ہو گا تو جو چیز تمہارے لئے مقدر ہو چکی ہے اس کے حصول کے لئے انتہائی کوششیں کرو اور اللہ کے انتہائی فضلوں کو حاصل کرو۔ خدا آپ کو بھی اور مجھے بھی اس کی توفیق عطا کرے۔ (اللّٰھم اٰمین)
    (از رجسٹر خطبات ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز







    ایمان کی پختگی کے بغیر ہم اپنی
    ذمہ داری کو نباہ نہیں سکتے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۷؍اگست۱۹۷۰ء بمقام سعید ہائوس ایبٹ آباد۔ غیر مطبوعہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    ’’صحت کے ساتھ بیماری بھی لگی ہوئی ہے اور بعض بیماریاں توایسی ہیں کہ ایک دفعہ حملہ کریں تو پھر ان کا عمر کا ساتھ ہوجاتا ہے اسی قسم کی بیماریوں میںسے پیچش ہے خصوصاً وہ قسم جسے’’ایم بی بک ڈیسنٹری‘‘ کہتے ہیں بڑی دیر سے مجھے بھی تکلیف ہے۔ کبھی یہ بیماری سوئی رہتی ہے اور کبھی بیدارہوکر تنگ کرتی ہے۔ ربوہ میںہی پیچش کا بڑا سخت حملہ ہوا لیکن وہاں ایک دو روز چلنے سے قبل حملہ ہوا تھا۔ میں نے اس کی دوائی اس لئے استعمال نہیں کی کہ دوائی پیچش کو تو خداتعالیٰ کے فضل سے فائدہ پہنچاتی ہے لیکن کمزوری بہت کر دیتی ہے اور وہاں اس قسم کے کام تھے اور اس نوعیت کے کام تھے کہ جنہیں ختم کرنا ضروری تھا اس لئے میں نے خیال کیا کہ کام کئے جائیںاورپیچش کو کھیلنے دیا جائے یہاں آکر دوائی کا استعمال کیا ہے اللہ تعالیٰ نے فضل کیا ہے کچھ افاقہ ہے لیکن کمزوری اتنی ہوگئی ہے کہ آج صبح توخیال تھا کہ میں شایدجمعہ میں شامل نہ ہوسکوں اللہ تعالیٰ کی توفیق سے شامل ہوگیا ہوں اور کوشش کروں گا کہ بالکل مختصر بیان میں آپ کی توجہ ایک نہایت اہم بات کی طرف مبذول کرادوں اوریہ ایک بنیادی بات ہے یعنی ایمان پر پختگی سے قائم ہونا۔
    اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں سینکڑوں جگہ ایمان کے لفظ کو استعمال کیاہے اور اس کے بیسیوں شعبے اور بیسیوں شاخیں بیان کی گئی ہیں ان میں سے بعض کے متعلق شاید میں بعد میں انشاء اللہ خطبات دوں گا آج میں صرف اصولی بات یہ بتانا چاہتا ہوں کہ ایمان پر پختگی ضروری ہے ورنہ ایمان کا کوئی فائدہ نہیں مثلاً ہمیں بعض مومن ایسے بھی نظر آتے ہیں کہ جو بظاہر دیانتداری کے ساتھ اور اخلاص سے یہ سمجھتے ہیں کہ وہ اللہ تعالیٰ پر ایمان رکھتے ہیں لیکن اپنی اس دیانت داری اوراخلاص کے باوجود وہ قبروں پرجاکر سجدہ بھی کردیتے ہیں یعنی بہت سے اَن پڑھ ناسمجھ پورا علم نہ رکھنے والے عوام مسلمان قبروں پرجاکر سجدہ بھی کردیتے ہیں اور انہیں یقین ہوتا ہے کہ وہ اپنے ایمان باللہ پر پُختہ ہیں حالانکہ اللہ پر ایمان اور کسی قبر یا قبروالے کا خیال یہ تو اکٹھے نہیں ہوسکتے لیکن عدم علم اور جہالت کے نتیجہ میں بعض لوگ یہ سمجھتے ہیں(وہ اپنے خدا کو دھوکہ نہیں دے رہے ہوتے البتہ اپنے نفس کو ضرور دھوکہ دے رہے ہوتے ہیں) کہ وہ اللہ پر ایمان لاتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ اللہ پر ایمان لانے کے راستے میں قبرکا سجدہ روک نہیں ہے۔
    ایک بڑی موٹی مثال ہے جس سے یہ بات واضح ہوجاتی ہے ہمیں یہ حکم دیاگیا ہے کہ ہم اپنے ایمانوں پر پختگی سے قائم ہوں چنانچہ جب ہم صحابہؓ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگیوں کا مطالعہ کرتے ہیں تو ہم حیران ہوجاتے ہیں کہ کس قدر پختہ ایمان تھا ان کا، ہر اس شعبہ اور شاخ کے متعلق کہ جس کاذکر اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں کیا ہے۔ قریباً۳۸یا۴۰ سالہ دور ہے ہجرت کے بعد کا خلافت راشدہ کے اختتام تک اس زمانہ پر اگرآپ اس نقطہ نگاہ سے نظر ڈالیں کہ صحابہؓ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم میں سے جن لوگوں نے صحیح اور کامل اور پوری تربیت حاصل کی انہوں نے کیا کردار ادا کیا تو آپ کو نظر آئے گا کہ وہ اسلام کی روح رواں تھے وہ امت مسلمہ کی جان اور ریڑھ کی ہڈی تھے ان کے بغیر امت مسلمہ کا جسم بھی کھڑا نہیں ہوسکتا تھا اور وہ سمجھتے تھے کہ ان کے اوپر یہ فرض عائد ہوتاہے کہ وہ اسلام کی روح رواں بنیں کیونکہ انہوںنے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے اعلیٰ تربیت حاصل کی ہوئی تھی وہ لوگ جو صحابہؓ کہلائے گوبعد میں توامت مسلمہ کے علماء اور فقہاء نے صحابی کی تعریف بہت نرم کردی تاکہ صحابیوں کے نام کا تقدس اور برکت امت میں جاری رہے لیکن صحابہؓ میں سے دو گروہ ہیں ایک وہ جو دن رات آپ کے قُرب میں رہنے والے تھے اورہر بات کے متعلق اوراپنی زندگی کے ہر پہلو کے متعلق آپ سے تربیت حاصل کرنے والے تھے اور دوسرے وہ تھے جو تین سو میل سے آئے ایک دفعہ ملے اور پھر واپس چلے گئے۔ صحابی کی تعریف کے مطابق وہ بھی صحابی بن گئے یامثلاً حج کرنے آئے اور دور سے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے مبارک اورمقدس اور نورانی وجود پرنظرڈالی اور برکت لی(برکت انہوںنے یقینا لی اس سے انکار نہیں کیا جاسکتا) اور حج کے دنوں میں آپ کے کلمات سنے اور اس سے استفادہ کیا یہ بھی اپنی جگہ صحیح ہے لیکن ان دوبرکتوں یعنی ایک وہ شخص ہے جو دن رات آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے برکتیں حاصل کر رہا ہے اور ایک وہ شخص ہے جس نے برکت تو حاصل کی لیکن اپنی ساری زندگی میں اورآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی ساری زندگی میں دس منٹ یا آدھ گھنٹہ یا گھنٹے تک برکت حاصل کی پس عملی زندگی اور اس زمانہ کے حقائق کے لحاظ سے ان دوبرکتوں میں بڑا فرق نظر آتا ہے۔
    مثلاً ایک اور واقعہ میں یہاں بیان کردیتا ہوںیرموک کی جنگ ہوئی قیصر روم کے ساتھ مسلمانوں کی جو جنگیں ہوئی ہیں ان میں سے یہ جنگ سب سے زیادہ خطرناک تھی ایک اور اس سے ملتی جلتی جنگ تھی لیکن یہ یقینا بہت خطرناک جنگ تھی مسلمان ان کی تعداد کے لحاظ سے جو ان کی تعداد کم کرکے اور اپنی تعداد زیادہ کرکے دیکھ رہے تھے مورخین میں بڑا اختلاف ہے جو زیادہ سے زیادہ تعداد ثقہ مؤرخین نے مسلمانوں کی لکھی ہے وہ لی جائے اور جو کم سے کم تعداد مسلمان مؤرخین نے رومیوں یعنی عیسائیوں کی لکھی ہے وہ لی جائے تو مسلمانوں اور عیسائیوں کی تعداد میں ۱ اور ۴،۱ اور ۵کا فرق ہے۔ غرض یہ بڑی زبردست جنگ تھی اس میں اللہ تعالیٰ نے اپنے فضل اور رحم سے مسلمانوں کو فتح دی لیکن اس جنگ میں ایک دن میں(باقی تو چھوٹی چھوٹی جھڑپیں تھیں) ایک ہزار ایسے صحابہ رضوان اللہ علیھم شہید ہوئے جو صحیح طورپر ایک لمبے عرصہ تک حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے تربیت حاصل کرچکے تھے اور جو اپنی ذمہ داری کو کما حقہ، سمجھتے تھے اور اس ایک ہزار میں ایک سو ایسے صحابہؓ تھے جو بدر میں شامل ہوئے تھے حالانکہ بدر پہلی جنگ ہے پس معلوم ہوا یہ بہت پرانے صحابہؓ میں سے تھے کیونکہ بدر میں کُل۳۱۳ صحابہؓ شامل ہوئے تھے اور یرموک کی جنگ تک بہت سے ویسے ہی وفات پاگئے ہونگے۔ میں نہیں کہہ سکتا کہ اس دن بدری صحابہؓ میں سے باقی کتنے موجود ہونگے لیکن اگر فرض کرلیں کہ سارے موجود تھے تب بھی۳۱۳کی اس ابتدائی جماعت میں سے جو شروع سے ایمان لائے اور ساری جنگوں میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ شامل ہوئے ان۳۱۳ میں سے ایک سو صحابی یعنی ایک تہائی یہاں شہید ہوگئے یہ چوٹی کے صحابہؓ تھے اور امت مسلمہ کی جان تھے اس وقت اگر یہ نہ ہوتے تو اللہ تعالیٰ شاید کسی اور رنگ میں فضل کرتا اسکے فضل کے جو دروازے ہیں ان کاتو کوئی شمار نہیں لیکن ظاہری حالات میں یہ لوگ جو تھے ان کے ساتھ جب دوسروں پر نگاہ ڈالتے ہیںتو ان میں ان جیسی ہمت نظر نہیں آتی کہ یرموک کی جنگ یا ایران کی دوسری جنگیں یا قیصر روم کے ساتھ دوسری جنگیں جیت سکتے۔ ان پرانے صحابہؓ میں سے بسا اوقات ایک ایک آدمی جنگ جیت جاتا تھا۔
    ایک دفعہ مسلمانوں نے ایک قلعہ کا محاصرہ کیا۔ وہSurrender(سرنڈر) نہیں کررہے تھے حالانکہ ایسی صورت میں دشمن کے ساتھ اسلام نے بڑی نرمی دکھائی ہے کہا ہے یا اسلام لے آئو تمہیں ہر قسم کی برکتیں ملیںگی دین کی بھی اور دنیا کی بھی اور اگر تمہارے دل میں اسلام کی صداقت پوری طرح واضح نہیں ہوئی تو پھر جزیہ دے دو ہماری امان میں آجائو۔تم ہماری حفاظت میں ہو گے اور اس کا کرایہ سمجھ لو جس طرح کرایہ پر آدمی ٹیکسی لیتا ہے اسی طرح ہماری تلواریں تمہاری حفاظت کریں گی تم ہمیں تھوڑا سا جزیہ دے دو یعنی ہرآدمی کو جزیہ کے طور پر سال میں چند روپے دینے پڑتے تھے۔ اسلام نے جزیہ کی بہت نرم شرائط رکھی ہیں مگریہ جزیہ دینے کے لئے بھی تیار نہیں تھے اور لڑتے بھی نہیں تھے قلعہ بند ہوکر بیٹھ گئے تھے مسلمان تنگ آگئے چونکہ وہ عملی زندگی کے عاشق تھے اگر چارپانچ دن بھی کوئی معرکہ نہ ہوتا تھا تو وہ بے چین ہوجاتے تھے کیونکہ دوسرے روحانی معرکوں سے تو وہ دور آئے ہوئے تھے اور اب میدان جنگ میں پڑے ہوئے تھے۔
    چنانچہ ایک دن ان پرانے صحابہؓ میں سے ایک بزرگ نے اپنے ساتھیوں سے کہا کہ ہم یہاں محاصرہ کرکے بیٹھے ہوئے ہیں دشمن باہر نکلتا نہیں قلعہ اتنا مضبوط ہے کہ ہمارے لئے ویسے اندر جانا مشکل ہے تم مجھے اُٹھا کر قلعے کی دیوار کے پرے دروازے کے پاس پھینک دو میںوہاں جو سپاہی ہوں گے ان کو مار دوں گا اور قلعہ کا دروازہ کھول دوں گا وہ چونکہ بڑے بزرگ صحابیؓ تھے اس لئے ان کے ساتھیوں نے کہا کہ ہم آپ کو کس طرح موت کے منہ میں پھینک دیں ہماری شامت آئی ہے؟ انہوںنے کہا نہیں میںجو کہتا ہوں کہ مجھے قلعہ کے اندر پھینک دو میں اکیلاکافی ہوں آگے روایتوں میں اختلاف ہوگیا ہے بعض نے کہا ہے کہ ان کے ساتھی مان گئے اور انہوںنے کندھوں پر اٹھا کر ان کے پرلی طرف کودنے کا سامان کردیا ایک اور روایت میں ہے کہ انہوں نے کہا اچھا میں خود ہی دیوارپرچڑھ جاتاہوں بہرحال وہ اکیلے دشمن کے قلعے کے اندر گھُس گئے۔ قلعہ مضبوط اور اس کے اندر ان کی ایسی فوج جسے کوئی نقصان نہیں پہنچاتھا کیونکہ جنگ ہی کوئی نہیںہوئی تھی مگر انہوںنے اکیلے خدا کی راہ میں دلیری دکھائی کہ دیوار پھاندی،اندر گئے پانچ دس آدمی جو دروازے پر محافظ تھے ان کو خدا کے فضل سے قتل کردیا جس وقت دروازہ کھولنے لگے تو پیچھے سے ان کے اورآدمی آگئے یعنی سینکڑوںکی بات تھی۔ اب دروازہ کھلتا یا ان کو پکڑ کرماردیتے لیکن اس وقت(یہ خدا کی شان تھی کہ) قلعہ کے دروازہ پر تالہ نہیں لگا ہوا تھا بلکہ بولٹ ٹائپ کی کوئی چیز تھی اس واسطے جلدی سے دروازہ کھل گیا۔ مسلمان فوج اندر آگئی اور قلعے پر قابض ہوگئی گو انہوںنے اندر آکر بھی دشمن سے لڑائی لڑی لیکن اصل میں تو اس جنگ کو جیتنے والے وہی ایک صحابیؓ تھے۔
    امت مسلمہ کی تاریخ میں یہ ساری چیزیں ہمیں کیوں نظر آتی ہیں؟ اسلئے ہمیں نظر آتی ہیں کہ وہ ایمان کی پختگی پر قائم تھے۔ ایسے قائم تھے کہ حضرت خالدؓ بن ولید نے بسا اوقات دشمن کو اپنے خط میں یہ لکھا ہے کہ تمہارے لئے بہتریہ ہے کہ جزیہ پرصلح کرلوکیونکہ میرے ساتھ وہ فوج ہے جو موت سے اس سے زیادہ پیارکرتی ہے جتنا تم لوگوں کو زندگی سے پیا رہے اوران کے عمل بھی یہی ثابت کررہے تھے۔
    یہی ایمان کی پختگی آج بھی چاہئے آج بھی اسلام کو اسی کی ضرورت ہے۔ غلبہ اسلام کا وہ کام جوہمارے سپرد کیا گیا ہے وہ اسکے بغیر نہیں ہوسکتا جنون ہی ہے نا جس طرح وہ جنون تھا کہ اکیلے اندر جاکر قلعے کا دروازہ کھول دے گا۔ ایک دنیا دار کی نگاہ میں وہ ایک جنون کی بات تھی اور یہ بھی ایک جنون کی بات ہے جب وہ ہم سے یہ سنتے ہیں کہ ایک چھوٹی سی غریب جماعت جسے مٹانے کے لئے ساری دنیا اکٹھی ہوگئی ہے اور جس کے پاس طاقت نہیں، روپیہ نہیں اور دولت نہیں دنیوی علوم کے لحاظ سے کوئی بڑے اچھے سکالر نہیں مگر کہتے یہ ہیں کہ ہم نے ساری دنیا میں اسلام کو غالب کرنا ہے جس طرح وہ(یعنی صحابہؓ) کہتے تھے کہ ساری دنیا میں اسلام اب فاتح اور غالب کی حیثیت سے رہے گا صرف منہ سے یہ کہہ دینا کہ ہماری یہ ذمہ داری ہے کہ ہم اسلام کو غالب کرکے چھوڑیںگے یہ تو بالکل بے معنی بات ہے جب تک اس قسم کا ایمان اور ایمان میں اس قسم کی پختگی نہ ہو جو صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم میں تھی۔ اس پختگی کے بغیر توہم کام ہی نہیں کرسکتے یہ تومذاق ہے دنیا کے ساتھ اور اپنے نفسوں کے ساتھ یہ تو شیطان کے ہاتھ میں کھیلنا ہے غرض ایمان کی پختگی کے بغیر ہم اپنی ذمہ داری کو نباہ نہیں سکتے میں نے بتایا ہے کہ ایمان کی پختگی مختلف شعبوں سے تعلق رکھتی ہے اسکی مختلف شاخیں ہیں اللہ تعالیٰ نے توفیق دی تو انشاء اللہ پھر بتائوں گا آج تو الحمد اللہ، اللہ تعالیٰ کی توفیق سے چند منٹ ہی بنیادی طورپر یہ بات میںنے بتادی ہے اس کی تفصیل میں انشاء اللہ پھر جائیں گے۔
    (از رجسٹر خطبات ِ ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز



    ایمان کی روح اور اسلام کی جان
    ایمان باللہ ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۱۴؍ اگست۱۹۷۰ء بمقام سعید ہائوس ایبٹ آباد ۔غیر مطبوعہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    مجھے سارا ہفتہ ہی خون کے دبائو میںکمی کی تکلیف ہو جاتی رہی ہے۔ آج صبح بھی ۱۱۲۔۷۶ تھا اور اس وقت دوائی کھانے کے باوجود۱۱۴ ہوا ہے ۔دعا کریں اللہ تعالیٰ فضل فرمائے۔ اس کی وجہ سے ضعف دماغ بھی ہوجاتا ہے۔ آدمی ٹھیک طرح کام نہیں کرسکتا۔
    میںنے گزشتہ جمعہ مختصراً ایمان کی پختگی کے متعلق احباب کو توجہ دلائی تھی قرآنِ کریم میں ایمان کا لفظ دوطریق پر استعمال ہو اہے۔ ایک تو مخصوص بنیادی چیزوں پر ایمان کے متعلق جیساکہ اللہ تعالیٰ کہیں فرماتا ہے ایمان بالغیب لانا چاہئے کہیں فرماتا ہے آخرت پرایمان لانا ضروری ہے کہیں فرماتا ہے انبیاء اور رُسل پر ایمان لانا ضروری ہے کہیں فرماتا ہے کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جو اللہ تعالیٰ کے محبوب ترین انسان اوررسول تھے ان پر ایمان لانا ضروری ہے کہیں فرماتا ہے کہ پہلی ہدایتوں پر جو دراصل قرآن کریم ہی کے حصے اور ٹکڑے اور ’’نصیب‘‘ تھے۔ ان پر ایمان لانا ضروری ہے کہیں فرماتا ہے کہ قرآن کریم پر ایمان لانا ضروری ہے کہیں فرماتا ہے کہ تمہیں جو پیشگوئیاں اور بشارتیں دی گئی ہیں اُن پر ایمان لانا ضروری ہے۔ غرض اس طرح ایمان کے ساتھ وضاحت ہوجاتی ہے کہ اس بات(یعنی جو مضمون بیان ہورہا ہو) پر ایمان لاناضروری ہے۔
    دوسرے ایمان کا لفظ جو عام طور پر اور بڑی کثرت کے ساتھ استعمال ہو اہے اس کے ساتھ آگے تفصیل نہیں ہوتی یہ فرمایا ہے کہ ایما ن لائو ایمان کا یہ فائدہ ہے ایمان کا یہ ثواب ہے ایمان سے اللہ تعالیٰ خوش ہوتا ہے مگر وہاں یہ ذکر نہیں ہوتا کہ اللہ تعالیٰ پر ایمان لانے کی بات ہورہی ہے یا غیب پر ایمان لانے کی بات ہورہی ہے یا رُسل پرایمان لانے کی بات ہورہی ہے یا حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر ایمان لانے کی بات ہورہی ہے یا قرآن کریم پر ایمان لانے کی بات ہورہی ہے وغیرہ۔ غرض ایسی صورت میں تفصیل نہیں دی ہوتی اللہ تعالیٰ صرف یہ فرماتا ہے کہ ایمان لائو۔
    دراصل جہاں کہیں بھی ایمان کے لفظ کو اس طریق پر استعمال کیا گیا ہے وہاں ایمان کے تمام تقاضے مراد ہیں یعنی اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم میں ایمان کے جو بھی تقاضے مقرر فرمائے ہیںاور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی تشریح کی ہے ان تقاضوں کو پوراکرنا مراد ہے مثلاً ایک جگہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ اگر تم ایمان لانے والے ہوگے تو کوئی غیر تم پرغالب نہیں آئے گا۔
    اَنْتُمُ الْاَ عْلَوْنَ اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْ مِنِیْنَ (آل عمران :۱۴۰)
    اب یہاں مومن کے لفظ کے ساتھ مؤمن باللّٰہ یا مؤمن بالغیب یا مؤمن بالآخرۃ وغیرہ نہیں ہے بلکہ محض مومن کا لفظ ہے۔ جس کا مطلب یہ ہے کہ اگر تم ایمان کے سب تقاضوں کو پوراکرنے والے ہوگے تو اللہ تعالیٰ کی رحمت اوراسکی نصرت تمہارے شاملِ حال ہوگی اور تم ہی غالب آئو گے غیر تم پر غالب نہیں آئے گا۔
    پس جب اللہ تعالیٰ کی ساری محبت اورساری نُصرت اور ساری رحمت اور ساری برکت کو جذب کرنے اوراسکی رضا کو حاصل کرنے کے لئے ایمان کے سب تقاضوں کو پورا کرنا ضروری ٹھہراتو پھر ہمیں ایمان کے سب تقاضوں کا علم بھی ہونا چاہئے اس سلسلہ میں اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں ایمان کے جو مختلف تقاضے بیان فرمائے ہیں ان کے متعلق بھی اللہ تعالیٰ کی توفیق سے سلسلہ وار کچھ بیان کروںگا۔
    ایمان کا پہلا تقاضا اور وہی دراصل ایمان کی روح اور اسلام کی جان ہے وہ ایمان باللّٰہ ہے پس جب میں نے کہا تھا کہ ایمان میں پختگی پیدا کرو تو میرا یہی مطلب تھا کہ ایمان کے جتنے پہلو اور جتنی شاخیں ہیں ہر پہلو اور شاخ کے متعلق اپنے ایمانوں میں پختگی پیداکرو ایمان کے مضمون کے اندر جو بنیادی چیز ہے وہ ایمان باللہ ہے یعنی اللہ پر ایمان لانا۔ اللہ پر ایمان لانا اور لانے میں بڑافرق ہے ایک شخص اللہ تعالیٰ کو جانتا ہی نہیں لیکن زبان سے کہتا ہے کہ میں اللہ پر ایمان لاتاہوں اللہ پر حقیقی ایمان لانے کے لئے ضروری ہے کہ ہمیں اس کی معرفت حاصل ہو اور جب پوری معرفت حاصل ہوجائے تو پھر سب کچھ حاصل ہو جاتا ہے۔ معرفت کے بغیر وہ چیز ہمیں مل نہیں سکتی جو اسلام ہمیں دینا چاہتا ہے یعنی اللہ تعالیٰ کی محبت اور اس کی رضا۔
    پس صرف زبان سے یہ کہہ دینا کہ ہم اللہ تعالیٰ پر ایمان لائے خدا اور رسول کے نزدیک یہ کافی نہیں ہے اللہ تعالیٰ پر اس طرح ایمان لانا چاہئے جس طرح قرآن کریم کہتا ہے کہ ایمان لائو مثلاً اللہ تعالیٰ کو ہر حالت اور زندگی کے ہر موڑ پر قادر مطلق سمجھنا دنیا میں کسی قوم یا کسی انسان کی زندگی میں کوئی ایسا موقعہ نہیں آیا کہ جس وقت یہ کہا جائے کہ اب خدا بھی اس کی مدد نہیں کرسکتا۔ پس اللہ تعالیٰ پر ایمان لانے کا یہ بھی ایک پہلو ہے۔
    میں پہلے بھی بتا چکا ہوں کہ ایک دفعہ ایک دوست نے مجھے خط لکھا کہ میرے دوتین عزیز ہیں۔ معصوم تھے لیکن قتل کے ایک کیس میں ملوث ہوگئے ہیں جج جو فیصلہ کرتا ہے وہ خدا کی طرح علّام الغیوب تونہیں ہوتا۔ بعض دفعہ شرارت بھی کرتا ہے یہ بھی ایک پہلو ہے لیکن بہت دفعہ اپنی جہالت کی وجہ سے فیصلہ کردیتا ہے گواہیوں پر اس نے فیصلہ کرنا ہوتا ہے۔ اسے خود پتہ بھی ہوتا ہے کہ وہ غلط فیصلہ کررہا ہے لیکن اسے فیصلہ کرنا پڑتا ہے کیونکہ جن گواہوں کے بیان اس نے ریکارڈ کئے ہیں ان سے جو شکل بنتی ہے اسی کے مطابق اسے قدم لینا پڑتا ہے جو وہ لیتا ہے بہرحال ہمیں بھی اور ان کے عزیزوں کو بھی پتہ تھا کہ وہ بے گناہ ہیں۔ خیر سیشن جج نے انہیں پھانسی کی سزا دی پھر ہائیکورٹ میں اپیل کی مگر یہاں بھی پھانسی کی سزا Confirm (کنفرم) ہوئی پھر اپیل ہوئی سپریم کورٹ میں یہاں بھی سز ا بحال رہی پھرانہوںنے گورنر صاحب کے پاس Mercy(مرسی یعنی رحم کی)اپیل کی اور انہوں نے بھی اس سزا کو بحال رکھا پھر انہوں نے مجھے دعا کے لئے لکھا ( ویسے پہلے بھی وہ دعا کے لئے لکھتے رہتے تھے) لیکن قبولیت دعا یاانکار کے اوقات بھی اسی نے مقرر کئے ہوئے ہیں کیونکہ وہ مالک ہے جب انہوںنے پریذیڈنٹ کے پا س اپیل کی تو ان کے ایک عزیز نے سارے حالات بتاتے ہوئے لکھا کہ اس طرح کا یہ مقدمہ ہے۔ لو گ کہتے ہیں کہ آج تک ایسا کبھی نہیںہوا کہ ایسے حالات میں صدر رحم کی اپیل منظور کرلے لیکن بہرحال یہ آخری موقعہ تھا ہم نے اپیل کی ہے آپ دعا کریں ۔ اب جس چیز کی طرف میں آپ کو توجہ دلانا چاہتا ہوں اسے میں آگے بیان کرنے والا ہوں چنانچہ میںنے خط پڑھا اس وقت ایک رائے میرے دماغ میں یہ آئی اور میں نے اپنے دماغ میں یہ فقرہ بنالیا کہ جب ایسے حالات ہوںتو مصیبت میں صبر کرنا چاہئے اور کوئی گھبرانے کی بات نہیں ابھی میرے قلم نے یہ فقرہ لکھا نہیں تھا کہ میرے ربّ نے مجھے پکڑا اور جھنجھوڑا اور مجھے یہ کہا کہ تم ایک احمدی کو یہ سبق دینا چاہتے ہو کہ اس کی زندگی میں ایک ایسا موقع بھی آسکتا ہے کہ جس میں اللہ تعالیٰ اس کی مدد نہیںکرسکتا خیر قلم نے تو ابھی کچھ لکھا نہیں تھا میں نے استغفار پڑھی اور انہیں لکھا کہ اللہ تعالیٰ کے آگے کوئی چیز اَن ہونی نہیں آپ گھبرائیں نہیں میں دعا کروں گا ابھی پندرہ دن نہیں گزرے تھے کہ ان کا خط آیا کہ رحم کی اپیل منظور ہوگئی ہے اور وہ سب رہا ہوکر گھروں میں آگئے ہیں۔
    اللہ تعالیٰ اس قسم کی قدرت رکھنے والاہے۔ اس سے مایوس نہیں ہونا چاہئے اسی واسطے اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے’’لَا تَقْنَطُوْا‘‘ (الزّمر:۵۴) کیونکہ مایوسی شرک ہے۔ اس سے اللہ تعالیٰ کے لئے ایک ضعف کا احتمال ہوتا ہے یہ ایمان باللہ نہیں ہے ہم اس قادر مطلق پر ایمان لاتے ہیں جو ایک ذرہ حقیر کے ذریعہ دنیا میں ایک عظیم انقلاب برپا کردیتا ہے میں پہلے بھی بتا چکا ہوں اسلام کے پہلے تیس سالہ دو رمیں مسلمانوں کی کامیابیوں کے نتیجہ میں جو ایک عظیم انقلاب بپا ہوگیا تھا مسلمانوںنے قیصروکسریٰ کی زبردست باشاہتوں کے تختے الٹ دئیے تھے ان کامیابیوں کی جان درحقیقت دس پندرہ ہزار صحابہ کرام تھے جنہوں نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے تربیت پائی تھی بعد میں آنے والے غیر تربیت یافتہ لوگ یہ کام کرہی نہیں سکتے تھے کیونکہ صحابہ کرام اللہ تعالیٰ پر ایمان رکھتے اور اس پر پختگی سے قائم تھے۔حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو سچا رسول مانتے تھے اور اس بات پر یقین رکھتے تھے کہ اللہ تعالیٰ نے جو بات آپ کو بتائی ہے وہ واقعہ ہی بتائی ہے اور اللہ تعالیٰ بڑی طاقت والا ہے وہ بات غلط نہیں ہوسکتی۔
    میں نے پچھلے خطبہ جمعہ میں بھی بتایا تھا کہ ایک قلعہ جو فتح نہیں ہورہا تھا اسے ایک صحابی نے فتح کرلیا۔ وہ اپنے ساتھیوں سے کہنے لگے کہ مجھے دیوار کے پرے پھنیک دو۔ پہلے تو ان کے ساتھی مانتے نہیں تھے یہ ایک لمبی تفصیل ہے۔ بہر حال وہ اللہ تعالیٰ کی توفیق سے اندر گئے۔ گیٹ پر موجود سپاہیوں کو قتل کرکے گیٹ کھول دیا فوج اندر آگئی اور اسطرح ایک آدمی کی جرأت سے قلعہ فتح ہوگیا۔ کیاوہ صحابی پاگل تھے؟ نہیں وہ پاگل نہیں تھے ان سے زیادہ عقلمند انسان دنیا میںپیدا ہی نہیں ہوا تھا کیونکہ جو شخص اللہ پر ایمان لاتا ہے اور اس کی صفات کی معرفت رکھتا ہے اس سے زیادہ عقلمند کوئی نہیں ہوسکتا قرآن کریم نے صرف یہ نہیں کہا کہ اللہ پرایمان لائو اور اس کی صفات جس رنگ میں قران کریم میں بیان ہوئی ہیں یا جس رنگ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی تفسیر بیان فرمائی ہے اس رنگ میں ان کی معرفت حاصل کرو۔
    مثلاً اللہ تعالیٰ پر رب ہونے کے لحاظ سے ایمان لائو کیونکہ ساری ربوبیتِ عالمین کا منبع اور سرچشمہ اللہ تعالیٰ کی ذات ہے۔ آپ دنیا کے ماحول پر نگاہ ڈالیںتو پتہ لگتا ہے کہ سارا کارخانہ ٔ عالم اس کی اس صفت پر چل رہا ہے یعنی ایک تدریجی ارتقاء ہے جو ربوبیت کا تقاضا کرتا ہے یہ میرے سامنے درخت ہے ایک وقت میں اس کی چھوٹی سی گٹھلی تھی پھر اللہ تعالیٰ نے ایسے سامان پیدا کئے کہ اسے غذا ملتی رہے۔ بڑا ہو اورپتے نکالے۔ پس یہ اللہ تعالیٰ کی قدرت ہے کہ ایک گٹھلی میں آگے ہزاروں لاکھوں درختوں کے پیدا ہونے کے لئے Cells(سیلز) یعنی نقطے مخفی ہوتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کی یہ قدرت ہرجگہ نظر آتی ہے اپنے گھروں میں اپنے بچوں پر نگا ڈالیں اپنے اوپر نگاہ ڈالیںاپنے کپڑوں پر نگاہ ڈالیں اپنے جوتوں پر نگاہ ڈالیں آپ کو نظر آئے گا کہ ہر چیز نے ترقی کے مختلف ادوار یا Changes (چینجز) میں سے گزر کر یہ آخری شکل اختیار کی ہے کچھ تبدیلیاں ایسی ہیں جو انسان نے اپنے ہاتھ سے کی ہیں اس عقل کے نتیجہ میں جو اللہ تعالیٰ نے اسے دی ہے اللہ تعالیٰ سے ہمارا چھٹکارا نہیں ہے اگرہم معرفت رکھتے ہوں اور کچھ یہ کہ اللہ تعالیٰ نے اپنا قانون قدرت ایسا بنادیا ہے مگر کہیں کہیںہمیں یہ بھی نظر آتا ہے کہ قانون قدر ت کچھ بنایا تھا اور اپنے قانون قدرت کو قانونِ خاص سے بدل دیا اس پر بھی اللہ تعالیٰ قادر ہے یعنی خود اپنے قانون کے اندر بندھا ہوا نہیں ہے وہ متصرف بالارادہ ہستی ہے وہ جو چاہتا ہے کرتاہے موٹر کے اس کارخانے کی طرح نہیں ہے کہ جس موٹر کووہ پٹرول پر چلنے کے لئے بنائے وہ ڈیزل سے نہیں چل سکتی اور جس کو ڈیزل پر بنایا ہے وہ پٹرول سے نہیں چل سکتی غرض ہر حرکت، ہرسکون، ہرتبدیلی ہر انقلاب چھوٹا یا بڑا اس کے بالارادہ تصرف کے نتیجہ میں پیدا ہوتا ہے اس خدا کو قرآن کریم ہمارے سامنے پیش کرتا ہے جو تمام صفات حسنہ سے متصف اور کوئی عیب یا کمزوری یا لاعلمی اس کی طرف منسوب نہیں ہوسکتی۔ دنیا میںکوئی چیز ایسی نہیں جو اس کی منشاء کے بغیر ہو مثلاً یہ اسکا منشاء تھا کہ وہ انسان کو آزادی دے۔ بعض احمق یہ اعتراض کردیتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے خود گناہ کرواناچاہا گندگی پھیلانی چاہی(معاذاللہ) یعنی اللہ تعالیٰ نے لوگوں کو اجازت دے دی کہ اگرتم چاہو تو نیکیوں کی طرف آجائومحبت کو دوسری مخلوق سے زیادہ حاصل کرو چاہو توتم گندمیں پھنس جائو اور اس کے قہر اور غضب کودوسروں سے زیادہ حاصل کرو پس اللہ تعالیٰ کی اجازت کے بغیر یہ بھی نہیں ہوسکتا لیکن اللہ تعالیٰ نے ایک منصوبہ بنایا اور ایک ایسی مخلوق پیدا کرنی چاہی جس کی جان اور روح اور مرکزی نقطہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات تھی اور اس انسان کوپیدا کیا جس کو ایک محدود ماحول کے اندر آزادی دی۔ محدود ماحول کے اندر آزادی کا یہ مطلب ہے کہ ہمارے پھیپھڑوں کو یہ آزادی نہیںہے کہ وہ ہوا کی بجائے پانی سے آکسیجن لے لیں۔ ہمارا جسم ہی کچھ ایسا بنا ہوا ہے اب تو ڈاکٹروں نے ہزار قسم کے Matalism (میٹالزم) بنا لئے ہیں کوئی میٹھے کا کوئی ہواکا یہ سارے میٹالزم چل رہے ہیں اس عالمین کا یہ سلسلہ ایک کارخانہ کی طرح چل رہا ہے خدا تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ متوازن غذا کھائو تو صحت مند رہو گے۔ ’’وَضَعَ الْمِیْزَانْ‘‘ کی رو سے اس نے اس دنیا کی ہر چیز میں ایک توازن قائم کردیا ہے۔ انسان کے جسم کے لئے بھی اس کی غذا کے لئے بھی توازن قائم کیا ہے اس میں اسے کوئی آزادی نہیں ہے کوئی شخص یہ نہیں کہہ سکتاکہ چونکہ میں آزاد مخلوق کا ایک فرد ہوں اس لئے میں صرف میٹھا کھا یا کروں گا اورمجھے ذیابیطس نہیں ہوگی۔ جوصرف میٹھا ہی کھائے گا وہ بَنْیُوں کی طرح موٹا بھی ہوجائے گا اور اسے بہت ساری بیماریاں بھی لگ جائیںگی۔ کوئی شخص یہ نہیں کہہ سکتا کہ چونکہ میں آزاد ہوں اسلئے میں صرف گوشت کھایا کرونگا۔ اوّل تو اگروہ شیر کی طرح خالی گوشت کھانا شروع کردے تو اس کے جسم میں سے بدبو آنی شروع ہوجائے گی دوسرے اس کا جسم،اسکے اخلاق پھر اس کی روحانیت اور ذہن جو ہے وہ متوازن ارتقاء نہیں کرسکے گا۔ اگر کسی بچے کو بچپن سے سوائے گوشت کے کچھ نہ دیا جائے تو وہ انسانی معاشرہ کاایک نارمل فرد نہیں بن سکے گا کیونکہ اس نے اللہ تعالیٰ کے قانون کو توڑا ہے۔
    پس ہر جگہ توہم آزاد نہیں البتہ ایک چھوٹے سے دائرے میں آزاد ہیں ہم اس بات میں آزاد ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے جو ہدایت اور شریعت نازل کی ہے اگر چاہیں تو اس کے آگے اپنی گردنیں رکھیں اور اگر چاہیں توشیطان کے بچے بن جائیں مگر یہ وارننگ دے دی کہ اگر تم میری بات مانوگے تومیری رضا کی جنتوں میں اپنا ٹھکانا بنائو گے اوراگر تم میری بات نہیں مانو گے شیطان کی گود میں بیٹھنا چاہو گے تو اس دنیا میں تو ممکن ہے ظاہری طور پر تمہیں اس کا کوئی فائدہ پہنچ جائے لیکن ابدی طور پر پھر تمہیں جہنم کی آگ کے اندر شیطان کی گود میںبیٹھنا پڑے گا کیونکہ وہاں تمہیں بٹھا دیا جائے گا اور بچوں کوکہا جائے گا کہ آئو اس کے گرد کھیلتے رہو۔
    غرض یہ آزادی دی ہے اوراللہ تعالیٰ نے اپنی منشاء سے دی ہے اس دنیا میں کوئی چیز اس کی منشاء اور اجازت کے بغیر ٹھہر ہی نہیں سکتی۔
    اب ہمارے مشرقی پاکستان میں طوفان آئے ہیںحالات پڑھ کر دل بڑا دکھتا ہے ہمارے بھائی تکلیف میں ہیں ہمیں بھی تکلیف ہورہی ہے۔ جماعت احمدیہ پر ان لوگوں کی مدد کرنے کا ایک ایسا فرض عاید ہوتا ہے جس کی طرف دوسروں کو خیال ہی نہیں اور وہ ہے ان کے لئے دعائیں کرنا۔ دوسرے لوگ تو دعا پر کامل ایمان ہی نہیں رکھتے قرآن کریم ایک ایسے خدا کو ہمارے سامنے پیش کرتا ہے جس نے اپنی ایک صفت یہ بتائی ہے کہ وہ دعائوں کو قبول کرتا ہے اور وہ تقدیر معلق کو بدل بھی دیتا ہے اور ایسی تقدیر جو مبرم سے ملتی جلتی ہو اور یہ ساری نسبتیں دراصل انسان کے فیصلہ پر منحصرہیں اللہ تعالیٰ کے سامنے تو ہر چیز واضح ہے قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:-
    اَمَّنْ یُّجِیْبُ الْمُضْطَرََّ اِذَا دَعَاہُ وَیَکْشِفُ السُّوْٓ ئَ۔ (النمل:۶۳)
    یعنی اللہ تعالیٰ کی ایک صفت یہ ہے کہ جب انسان تضرع اور ابتہال کے ساتھ اس کے حضور جھکتا اور اپنے یا اپنوں کی تکلیفیں دور ہونے کے لئے دعائیں مانگتا ہے تواللہ تعالیٰ ان کی تکلیف کو دور کردیتا ہے اللہ تعالیٰ نے ساری دنیا میں اس بات کا اعلان کیا اور ہم نے ساری دنیا میں اس کی مثالیں پیش کیں(ہم نے کیا کرنی تھیں ہم تو عاجز انسان ہیں) اللہ تعالیٰ نے ہمارے ذریعہ احمدیت کے ذریعہ ان اقوام کے سامنے اس بات کا کہ
    اَمَّنْ یُّجِیْبُ الْمُضْطَرََّ اِذَا دَعَاہُ وَیَکْشِفُ السُّوْٓ ئَ۔ (النمل:۶۳)
    کے مطابق یہ معجزہ بھی دکھایا کہ سات سات ہزار بلکہ اس سے بھی زیادہ دور سے دعائوں کے خط آتے ہیں لوگ تکلیف میں ہوتے ہیں اور اللہ تعالیٰ محض اپنے فضل سے نہ کسی بندے کی خوبی کے نتیجہ میںدعا کو قبول فرماتا اورانکی تکلیف کو دور کردیتا ہے اسلئے نہیں دور کرتا کہ ناصرؔ یا زید میں کوئی خوبی تھی اور اس کااظہار رکرنا چاہتا تھا بلکہ وہ دعا کے ذریعہ اس لئے تکلیف کو دورکرتا ہے کہ اس نے قرآن کریم میں یہ اعلان فرمایا ہے۔
    اَمَّنْ یُّجِیْبُ الْمُضْطَرََّ اِذَا دَعَاہُ وَیَکْشِفُ السُّوْٓ ئَ۔ (النمل:۶۳)
    اپنے اس قول کو اس نے ڈیمانسٹریٹ(Demonstrate) کرنا تھا اس کی مثالیں قائم کرنی تھیں۔
    ہمارے مشرقی افریقہ میں ایک سکھ بیماری کی وجہ سے سخت تکلیف میں تھا احمدیوں سے اس کی واقفیت تھی ہمارے مبلغ نے اسے کہا کہ حضرت صاحب کو دعا کے لئے خط لکھا کرو خیر اس نے دعا کے لئے مجھے لکھنا شروع کیا۔ ۵۔۶ مہینوں کے بعد مجھے اس کا خط ملاجس میں اس نے لکھا کہ اب مجھے بالکل آرام ہے اسلئے آپ بے شک میرے خط کا جوا ب بھی نہ دیں اسکو خیال آیا کہ ان کے پیسے خرچ ہورہے ہیں میں نے کہا کہ تم اصل چیز کوتو سمجھے ہی نہیں تم نے ابھی تک اس خدا کو پہنچانا ہی نہیں جسے ہم پہنچانتے ہیں اور جو خدا کو پہچانتا ہے اس کے ساتھ اپنے تعلق کو زندہ اور قائم رکھنا نہیں چاہتے کل کوپھر مصیبت پڑے گی تو پھر آئو گے اس واسطے میں اسے جواب ضرور بھجواتا رہا اس نے دوتین خط لکھے کہ مجھے میرے خط کا جواب دینے کی ضرورت نہیں میں خود ہی لکھ دیا کرونگا لیکن میں نے اپنے دفتر والوںسے کہا کہ نہیں یہ سمجھتا نہیں میں سمجھتا ہوں اس کے خطوں کا جواب ضروردینا ہے چنانچہ دوسرے تیسرے مہینے اس کا خط آتا ہے اور لکھتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کے فضل سے وہ بالکل ٹھیک ہے۔
    اب وہ شخص غیر مسلم کئی ہزار میل دور مشرقی افریقہ میں بیماری کی تکلیف میں مبتلا تھا اللہ تعالیٰ نے قران کریم میں یہ جواعلان فرمایا ہے اس کی رو سے وہ یہ معجزہ دکھانا چاہتا تھا اور بتانا چاہتا تھا کہ یہ محض لفّاظی نہیں ہے اور محض کاغذی اعلان نہیں ہے بلکہ فرماتا ہے کہ میں اس بات کی قدرت اور طاقت رکھتا ہوں کہ دنیا کو اس اعلان کے مطابق اپنی قدرتوں کے نظارے دکھائوںاور وہ دکھا رہا ہے۔
    پس مشرقی پاکستا ن میں جو کچھ ہوا وہ اللہ تعالیٰ کی مرضی کے خلا ف تو نہیں ہوسکتاتھا ہمارے بھائی بڑی تکلیف میں ہیں گھر سے بے گھر ہوگئے سامان ضائع ہوگیا مکان گر گئے کھانے پینے کی تکلیف سے دوچار ہیں۔ دوسری جگہ جاکرانسان کے لئے اگرچہ سب کچھ ہوتا ہے لیکن مہمان ہوتا ہے اوراپنی عادات کی وجہ سے اسے ہزاروں قسم کی تکلیفیں پہنچتی ہیں عزتِ نفس کا خیال ہوتا ہے چاہے حکومت ہی سر پر ہاتھ رکھ رہی ہو دوسرے لوگ بھی مدد کررہے ہونگے لیکن اس کے باوجود کئی لوگ ایسے بھی ہونگے جنہیں اس پریشانی میں کھانے کے لئے مجبوراً لینا پڑتا ہوگا ان کا دل نہیں کرتا ہوگا۔
    ایک مہاجر کے متعلق یاد ہے و ہ احمدی نہیں تھا وہ گورداسپور سے آیا تھا اس نے ہمارے خزانہ میں اپنا حساب کھلوایاہواتھایہاں اُجڑ کر آیاتھا مجھے پتہ تھا کہ ایک دھیلہ ساتھ نہیں لایا اور اس کا بہت بڑا خاندان تھاخیر چونکہ میں اسے ذاتی طورپر جانتا تھا میں نے اس سے پوچھا کہ تم تکلیف میں تھے مگر یہاں نہیں آئے وہ کہنے لگا اب بھی میں پیسے جمع کروانے کے لئے آیا ہوں لینے کے لئے نہیں آیا کیونکہ ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ پہلا جمع شدہ سرمایہ خرچ نہیںکرناکیونکہ پہلی پونجی اگر ہم نے ختم کردی تو ہمیں سستی کی عادت پڑجائے گی اس واسطے خاندان کے کمانے والے افراد سے کہہ دیا ہے کہ کماؤ اور کھائو۔
    پس ایسے حال میں بعض طبیعتیں اپنا سرمایہ خرچ کرنے کے لئے تیار نہیںہوتیں تکلیف محسوس کرتی ہیں اور دوسروں سے لینا عار محسوس کرتی ہیںلیکن ہزاروںلوگ لینے پر بھی مجبور ہوں گے مجبوری ہے جب بچے بلکتے ہیںتو یہ جذباتی تکلیف بھی اٹھانی پڑتی ہے اور ایسے کئی لوگ ہونگے مجھے اس کا بڑا احساس ہے اسی واسطے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ جو شخص کسی کی بغیر بتائے مددکرتا ہے وہ بڑا ہی ثواب حاصل کرتا ہے۔ صحابہ کرام رات کے اندھیروں میں جاکر دے دیتے تھے ہم بھی کبھی سنت پرعمل کرتے ہیں جسکو کوئی چیز دینی ہو وہ چیز لفافے میں بند کرکے ایسے رنگ میںاسکے پاس پہنچا دیتے ہیں کہ اسکو پتہ ہی نہ لگے یا اگر کوئی دوسرا تکلیف دے تو اسے ایسے رنگ میں معاف کردیتے ہیں کہ اسکو پتہ ہی نہ لگے۔
    مثلاً میں بچہ تھا مدرسہ احمدیہ میں پڑھا کرتا تھا مغرب کی نماز مسجد اقصیٰ میں پڑھا کرتاتھا کیونکہ مسجد مبارک میں دیر ہوجاتی تھی حضرت امّ المومنین رضی اللہ عنھا فرمایا کرتی تھیں کہ تم نے پڑھنا بھی ہے اور پھر سونا بھی ہے اس لئے وہاں چلے جایا کرو ہم تنگ گلی سے گزر کر مسجد اقصیٰ جایا کرتے تھے جس میں رات کو سخت اندھیرا ہواکرتا تھا ایک دن میں نیچے اترا تو مدرسہ احمدیہ کے طلباء قطار میں نماز پڑھنے کے لئے جارہے تھے میں بھی ان میں شامل ہوگیا اندھیرا تھا میرا پائوں اگلے لڑکے کے سلیپر پر پڑا اور اسے ٹھوکر لگ گئی خیر وہ چُپ کرگیا دوسری دفعہ جب پھر ایسا ہوا تو اس نے پیچھے ہٹ کر مجھے کھینچ کر چپیڑ لگائی میں فوراً پیچھے ہٹ گیا میں نے سوچاآگے روشنی میں جائیں گے تو میری شکل دیکھ کر شاید شرمندگی کی وجہ سے اسے تکلیف ہوگی اسلئے میں اسے یہ تکلیف کیوں دوں چنانچہ میںدس پندرہ قدم پیچھے ہٹ کر ساتھ ہولیا۔ مگر اسے آج تک پتہ نہیں کہ کس کے منہ پر چپیڑ پڑی تھی۔ گو اس نے اندھیرے میں سہی یاغیر ارادی طور پرسہی لیکن میرا پائوں غلطی کررہا تھا میرے پائوں کو یہ حق تو نہیںتھا کہ وہ دوسروں کو تکلیف دے۔
    بہرحال کبھی چھپ کر دینا پڑتا ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ بعض ایسی طبیعتیں ہیں جن کا جائز حق ہوتا ہے لیکن وہ دوسرے کے ہاتھ سے لینا پسند نہیںکرتے یا اس کی شہرت نہیں چاہتے ایسے کئی واقعات میرے علم میںہیں میں سمجھتا ہوںکہ یہ ایسی طبیعت ہے جو یہ ظاہر ہونا پسند نہیں کرے گی کہ حضرت صاحب نے میری کچھ مدد کی ہے تو دفتر والوںکوبھی پتہ نہیں ہوتا لفافہ وہاں چلا جاتاہے بیسیوں بلکہ سینکڑوں دفعہ ایسا کرنا پڑتا ہے۔
    اصل بات میںیہ کہنی چاہتا ہوں کہ وہاں اس قسم کے بھی لوگ ہونگے جو جذباتی تکلیف میں مبتلا ہونگے کیونکہ میں اس لحاظ سے خود بڑا جذباتی ہوں مجھے یہ سوچ کربڑی تکلیف ہوتی ہے ایسے دل بھی ہونگے جو ایک دھیلہ بھی کسی سے لینا پسند نہیں کرتے ہونگے مگر سیلاب کی وجہ سے مجبوری ہے بڑی تکلیف میں ہیں اور ایک مدد ایسی ہے جو ہمارے سوا کوئی نہیں کرسکتا وہ دعا کے ذریعہ مدد کرنا ہے اس الٰہی ارشاد کے مطابق کہ
    اَمَّنْ یُّجِیْبُ الْمُضْطَرََّ اِذَا دَعَاہُ وَیَکْشِفُ السُّوْٓ ئَ۔ (النمل:۶۳)
    انکے اضطرار اور تکلیف میں ہم بھی شامل ہیں ہمارا فرض ہے کہ ہم ان کے لئے بہت دعائیں کریں۔ اللہ تعالیٰ اپنے فضل سے ان کی تکالیف کو دور فرمائے اور پھرانکی خوشی اورمسرت کے سامان پیدا کرے۔
    دوسرے یہ کہ جیسا کہ حکومت کی طرف سے اعلان بھی ہوا ہے ہمیں دوسرے طریق پر بھی ان کی مدد کرنی چاہئے یعنی مادی امداد بھی دینی چاہئے اور رضاکارانہ خدمت بھی پیش کرنی چاہئے صدر انجمن احمدیہ کی طرف سے کچھ روپیہ گیا ہے لیکن مختلف جگہ رقمیں اکٹھی ہوتی ہیں ہر جماعت کو چاہئے کہ وہ حسب توفیق بشاشت کے ساتھ دعائیں کرتے ہوئے مالی امداد بھی کرے یعنی آپ روپوں پر بھی دعاکرکے دیں تااللہ تعالیٰ اپنے فضل سے ان روپوں کے ذریعہ ان کی تکلیف کو دور فرمائے۔
    جہاںتک رضاکارانہ خدمات پیش کرنے کا سوال ہے میں ذاتی طور رپر اس چیز کو پسند نہیں کرتا کہ رضاکار ایسوسی ایشن ایسے موقع پر وہاںآزادانہ طورپر کام کریں کیونکہ اس طرح بہت سے فتنے پیدا ہوجاتے ہیں۔ نائیجیریا میں جب بیافرا نے سرنڈر کیا تو میں نے وہاں کی حکومت کو اطلاع دی تھی اور اپنی جماعت کو ہدایت کی تھی کہ تم نے آزادانہ کام نہیں کرنا اپنی سروسز حکومت کو پیش کردو چنانچہ ہمارے سینکڑوںرضاکار حکومت کے عام نظام کے ماتحت بیا فرا والے حصوں میں جہاں ری ہیبلی ٹیشن ہونی ہے وہاں کام کررہے ہیں اور کرچکے ہیں میرے یہاں بھی ایسا ہی ہونا چاہئے لیکن بہر حال حکومت جس رنگ میں چاہے کام کرے اگرکوئی ایسی صورت ہوتو احمدی نوجوانوں کو حسب توفیق اور حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے دوہفتے یا چار ہفتے کے لئے اپنی خدمات بھی پیش کرنی چاہئیں۔خصوصاً ایسے دوست جو ہنریافتہ ہیں اور ان کے ہنر وہاں کام آسکتے ہیں مثلاً ڈاکٹر ہیں علاوہ ازیں اللہ تعالیٰ نے توفیق دی اور ایسی دوائیوں کا پتہ لگا تو علاوہ روپوں کے انشاء اللہ ایسی دوائیاں بھی وہاں بھجوائیں گے کیونکہ ہم خدا کے فضل سے ایسی دوائیوں کا انتظام کرسکتے ہیں جو یہاں سے نہیںملتیں یہ صحیح ہے کہ حکومت کے بڑے وسائل ہیں لیکن حکومت کے وسائل پر فارن ایکسچینج خرچ ہوتا ہے ہمارے وسائل بھی ہیں اور حکومت کو فارن ایکسچینج خرچ کرنے کی ضرورت بھی نہیں ہے کیونکہ انگلستان کے احمدی وہاں پیسے جمع کر کے وہ دوائی بھجواسکتے ہیں جو یہاں سہولت سے دستیاب نہیں۔
    پس ایک توان کے لئے بہت دعائیں کریں صرف آپ ہی ان کے لئے حقیقی معنوں میں دعا کرسکتے ہیں، دوسرے مالی امداد دیں اور تیسرے رضاکارانہ طورپر اپنی خدمات بھی حکومت کو پیش کریں یہ تومیرے اصل مضمون کی ایک شاخ ہوئی یعنی ڈائی گریشن۔ میں بتایہ رہا تھا کہ جس اللہ پر ہم ایمان لاتے ہیں وہ اللہ ہے جسے اس کی تمام صفات حسنہ کے ساتھ قرآن کریم نے ہمارے سامنے پیش کیا ہے اور جس میںکوئی کمی یا نقص یا کمزوری نہیں پائی جاتی وہ متصرف بالارادہ اور غَالِبٌ عَلٰی اَمْرِہٖ ہے۔ وہ ایک فیصلہ کرتا ہے جس کا باریک فلسفہ ہے لیکن عقلمند کوہم تسلی دلا سکتے ہیں اور آپ نے تسلی پائی ہوئی ہے زندگی کے موڑ اور یونیورس کی ڈیویلپمنٹ میں ایک اس کے ظاہری قانونِ قدرت کے مطابق نتیجہ نکلتا ہے اور ایک وہ نتیجہ ہے جو اللہ چاہتا ہے کہ نکلے۔ کبھی وہ اپنے قانونِ قدرت کے مطابق نتیجہ نکال دیتا ہے اور کبھی معجزانہ طورپر ایک اور حکم نازل کرتا ہے۔ پس دعا جو ہے وہ تقدیر کے خلاف نہیںاسکے متعلق تو نوجوانوں کو پھر میں کہوں گا کہ آجکل کے پُر فتن ایام میں اور اندھے فلسفہ کے بد اثرات کے زمانہ میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی جو تحریریں دعا کے متعلق ہیں وہ ضرور پڑھ لیں۔ میر دائود احمد صاحب نے اقتباسات کی کتاب شائع کی ہے اس میں۲۰۔۲۵صفحات میں دعا پر اقتباسات ہیں جن میں ۳۔۴ بنیادی باتیں آچکی ہیں۔
    بہر حال دعا اورتقدیر میںآپس میںکوئی تضاد اور تصادم نہیں ہے اللہ تعالیٰ قادر مطلق ہے وہ اپنی مرضی چلاتا ہے دنیا میں کوئی ایسی مخلوق نہیں جویہ کہہ سکتی ہو کہ نہیں میں نے اپنی مرضی چلانی ہے مرضی اللہ ہی کی چلے گی کیونکہ وہ تمام صفات حسنہ سے متصف ہے وہ رزّاق ہے۔ وہی کھیتیوں کو اُگا تا ہے اور پھل عطاکرتا ہے ایک زمیندار رات دن زمین میں ہل چلاتا ہے گر می میں وہ کھیتوں کی نگرانی کرتا ہے اس کے بیوی بچے بھی اس کے ساتھ لگے ہوئے ہوتے ہیںاور وہ مثلاً صرف گندم کی فصل اگانے کے لئے اتنی تکلیف برداشت کررہا ہوتا ہے کہ جس کی کوئی حد نہیں تاکہ وہ بھوکا نہ مرے لیکن جب یہ ساری تکلیفیں اٹھا چکتا ہے تو پھر اس کے کان میں اللہ تعالیٰ کی جوآواز پہنچتی ہے وہ یہ ہوتی ہے۔
    ئَ اَنْتُمْ تَزْرَعُوْنَـہٗ اَمْ نَحْنُ الزَّارِعُونَ (الواقعہ:۶۵)
    کیا کھیتیاں تم اُگاتے ہو شایدتم سمجھتے ہو کہ راتوں کوہم جاگے تکلیفیں ہم نے اٹھائیں، دن کی گرمی ہم نے برداشت کی، پانی کے لئے وقت بے وقت کھالوں پر پہرے ہم نے دئیے پھر بھی یہ نہ سمجھنا کہ سب کچھ تمہاری محنت کا نتیجہ ہے کھیتی وہی اُگے گی جسے اللہ تعالیٰ اُگانا چاہتا ہے۔
    میںنے ایک دفعہ پہلے بھی بتا یا تھا۔ احمد نگر میں ہماری اپنی گندم کی فصل تھی سِٹے پڑ چکے تھے زردی پر آرہے تھے کچھ دنوں کے بعد ہم نے انہیں کاٹنا تھا کاٹنے کی مشین بھی منگوائی گئی اتفاقاً شام کوپہنچی۔ وقت بھی تھا میں باہر نکلا اس کو دیکھ رہا تھا عام اندازہ تھا کہ۴۰۔۵۰من فی ایکڑ گندم نکلے گی بڑی اچھی فصل تھی کاٹنے کی مشین نیچے اتاری ابھی میں گھر نہیں پہنچا تھا راستے ہی میں تھا پہلے توآہستہ آہستہ بوندا باندی ہوتی پھر تیز ژالہ باری (یعنی اولے) پڑنے لگے کوئی دس پندرہ منٹ تک ژالہ باری ہوتی رہی میں اندر چلا گیا قریباً ایک گھنٹے کے بعد ہمارے وہ کارکن جو وہاں کام کرتے ہیں وہ آئے وہ بلا مبالغہ رورہے تھے کہ فصل تباہ ہوگئی روپیہ میں سے چھ آنے باقی رہ گئی۔ مجھے بڑاغصہ آیا نالائق آدمی جوباقی چھ آنے رہ گئے ہیں وہ بھی اللہ کا فضل ہے تم اس پر الحمدللہ نہیں پڑھتے اور جو اس نے اپنی چیز واپس لے لی ہے اس پر ٹسوے بہار ہے ہو یہ تو ٹھیک نہیں میںنے کہا ابھی واپس جائو اور ان کھیتوں کے کنارے اللہ اکبر کے نعرے لگائو اور الحمدللہ پڑھو اور پھر واپس آئو یہ تو اللہ تعالیٰ کی چیز ہے ایسے واقعات آتے ہی اس لئے ہیں کہ وہ بتائے کہ یہ تمہاری محنت کا پھل نہیں یہ میرے فضل کا نتیجہ ہے۔ اگر انسان کی محنت کا پھل ہے تو جہاںبھی محنت ہے اس کا پھل نظر آنا چاہئے اگر علت ہے تو اس کا معلول نظر آنا چاہئے اگر آگ جلائی ہے تو جہاں بھی آگ کے اندر کوئی پڑے گا اسکو جل جانا چاہئے لیکن حضرت ابراہیم علیہ السلام کو آگ نے نہیں جلایا خدا تعالیٰ یہ بتا نا چاہتا تھا کہ آگ نہیں جلاتی میں نے اسکوکہا ہے جلائو۔ جب میںاسے کہوں گا جلاتو یہ جلائے گی اور جب میں کہوںگا کہ نہ جلائو تونہیں جلائے گی اسی طرح یہ درخت کے پتے خود نہیں گرتے درختوں پر پھل خود نہیںآتا فصلیں آپ کی محنت کا نتیجہ نہیں کوئی چیز بھی انسان کی محنت کا نتیجہ نہیںبلکہ ہر چیزاللہ کے حکم کا نتیجہ ہے ہر چیز اللہ تعالیٰ کے حکم کا انتظار کرتی ہے اللہ تعالیٰ ویسے بڑا پیار کرنے والا ہے آدھا حصہ میں نے سنایا ہے اگلا بھی سنا دیتا ہوں تاکہ دوسری طرف کسی کووہم نہ جائے وہاں الحمدللہ کہلوایا مجھ سے بھی اور میرے ساتھیوں سے بھی(چاہے انہوںنے میرے سمجھانے پر کہا) اگلی فصل تھی منجی کی ہماری یہ زمین جوکہ پہلے ایک ٹھیکیدار کے پاس تھی اور اس کی آخری منجی کی فصل ساڑھے تین من فی ایکڑ نکلی اور جب ہم نے لی تو اللہ تعالیٰ کے فضل سے عام طورپر کم وبیش۱۵۔۲۰من فی ایکڑ نکلاکرتی تھی گندم واپس لے لی اور چاول ہمیں زیادہ دے دیا یعنی۲۹من اوسط نکال دی باسمتی(چاول موٹے نہیں اچھے خوشبودار) چاولوں کی اس وقت بھی ہم نے الحمدللہ پڑھی اور جس وقت اس نے اپنی چیز ہم سے واپس لی تھی اس وقت بھی ہم نے الحمد للہ پڑھی تھی ۔
    پس خدا تعالیٰ جس پر ہم ایمان لاتے ہیں وہ وہ ہستی ہے جسکے قبضۂ قدرت میں ہرچیز ہے اور ہر تبدیلی اور ہر واقعہ جو رونما ہوتا ہے وہ اس کے ارادہ سے ہوتا ہے کیونکہ وہ متصرف بالارادہ ہستی ہے اور وہ لوگوں کو اپنی قدرت کے نمونے دکھاتا رہتا ہے کبھی ژالہ باری کر کے اور کبھی کسی زمیندار کواسکی سمجھ میںہی یہ بات نہیںآتی کہ کیا وجہ ہے ساتھ کاکِلّہ(ایکڑ) ہے مگر ان کی فصلیں بڑی اچھی ہوتی ہیں اسے کیا پتہ کہ اللہ تعالیٰ کو ہماری کون سی چیز پسندآگئی اوراللہ تعالیٰ اپنی یہ شان ظاہر کرتا ہے کہ جسکو میںدیتا ہوں اسی کو ملتا ہے اور جسکو نہ دینا چاہوں نہیںملتا۔ اسی واسطے ایمان کے تقاضوں کی وہاں شرط لگادی تھی اتنا بڑا وعدہ کیا تھا لیکن مسلمانوں پر پچھلی تین چارصدیوں میں جو کچھ گزرا اسے دیکھ کر رونا آتا ہے حالانکہ اللہ تعالیٰ نے تو فرمایا ہے۔
    اَنْتُمُ الْاَعْلَوْنَ اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ۔ (آل عمران:۱۴۰)
    اس سے بڑھ کر وعدہ اور بشارت اورکیا مل سکتی ہے فرماتا ہے سوائے تمہارے غالب کوئی نہیں آسکتا تمہارا مخالف غالب نہیں آئے گا غالب تم ہی آئو گے لیکن اس وعدہ کے باوجود پچھلی۳۔۴ صدیوں میں دنیا نے مسلمانوں کو ذلیل کیا۔ انہیں حقارت کی نگاہ سے دیکھا اور لُوٹا اور ڈاکے مارے اورعورتیں اغوا کیں(۱۹۴۷ء میں نہ جانے کتنی عورتیں اغوا ہوئیں) کوئی بھی انسان جسے اللہ تعالیٰ نے ذرا بھی عقل دی ہے اس کے علاوہ اور کوئی نتیجہ نہیں نکال سکتا کہ انہوںنے اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ کی شرط پوری نہیں کی جب شرط پوری نہیں کی تو وعدہ رہا ہی کوئی نہیں۔ مشروط وعدہ تو شرط کے ساتھ چلتاہے شرط پوری نہیں ہوئی تو وعدہ پورا نہیں ہوتا۔اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو پھر یہ وعدہ دیا ہے کہ تم غالب آئو گے اس لحاظ سے بڑی فکر رہتی ہے جماعت کے بچوں اوربڑوں سب کے اوپر ایمان کی شرائط کو پورا کرنے کی ذمہ داری عاید ہوتی ہے اسی وجہ سے میں نے یہ سلسلہ خطبات شروع کیا ہے اللہ تعالیٰ کی توفیق سے ختم ہوگا۔
    پس ایمان باللہ محض یہ نہیں ہے جسے عام طورپرلوگ سمجھتے ہیں بلکہ اللہ پر وہ ایمان لانا چاہئے جس کا اسلام ہم سے تقاضا کرتا ہے مثلاً وہ رب العالمین ہے اس کے سوا کوئی رب نہیں ہے وہ رحمان ہے اس کے علاوہ کوئی بغیر استحقاق کے دینے والا نہیں اور وہ رحیم ہے وہ رحیمیت کی صفت کے نتیجہ میں بدلے کا حق پیدا کردیتا ہے دراصل رحیمیت حق دلواتی نہیں بلکہ حق پیدا کرتی ہے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے بڑی لطیف تفسیر بیان فرمائی ہے۔
    آپ فرماتے ہیں کہ صفت رحیمیّت انسان کی محنت کا حق پیدا کرتی ہے یعنی بدلہ ملناچاہئیے لیکن بدلہ ملتا ہے مَالِکِ یَوْمِ الدِّیْنِ کی صفت کے ماتحت اورمالک نیکی کا بدلہ دینے پر مجبور نہیں مثلاً جس نے کسی امیر کے کمرے میں اس کے دوہزار بکھرے ہوئے روپے اکٹھے کئے اس نے کوئی محنت کی نا! لیکن مالک یہ ہے اُجرت کوئی ہے نہیں مقرر، دوستی کے طورپر کام کیا یا مثلاً کئی لوگ ایسے موقعوں پرکسی کا بٹوا ڈھونڈ کر لادیتے ہیں یااسی طرح کا کوئی اور کام کردیتے ہیں اورلوگ انہیں انعام دیتے ہیں لیکن انعام دینے پر وہ مجبور نہیں ہیں۔دنیاکا کوئی قانون یا اخلاقی قانون یا شریعت کا قانون یہ نہیں کہتا کہ اس کا بدلہ دو اللہ تعالیٰ تو مالکِ کل ہے۔ المُلْکُ لِلّٰہِ کی روسے ہر چیز اسی کی ملکیت ہے جب ہر چیز اسی کی ملکیت ہے توپھر کسی کو کچھ دینے یا نہ دینے کے متعلق اس کے اوپر کسی کابھی حق نہیں ہے ہر شخص بھی اسی کا ہے اور جو اسے استعدادیں دی گئی ہیں وہ بھی اسی نے دی ہیں اس کا جسم بھی اللہ کاہے اور جن قویٰ سے وہ محنت کرتا ہے وہ قویٰ بھی اللہ تعالیٰ ہی نے اسے دئیے ہیںورنہ وہ کام ہی نہ کرسکتا۔ ایک شخص قرآن کریم کی بڑی کثرت سے تلاوت کرتا ہے اور سوچتا اورغور کرتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اسے آنکھیں دیں وہ پڑھنے لگ گیا ورنہ اللہ تعالیٰ نے دنیا میں کئی ایسے جاندار کیڑے بھی پیدا کئے ہیں جنکی آنکھیں نہیں ہوتیں صرف اپنے ناک سے سونگھنے کی قوت پر یا کوئی اور طاقت دی ہوگی جس سے وہ چلتے پھرتے ہیں لیکن انسان نے جسمانی اور روحانی غذا کی طرف جاناہوتا ہے اور وہ بڑیComplicated(کمپلیکیٹڈ)ہے انسان کی غذابھی عام غذا نہیں عام کیڑے مثلاً سانپ مٹی چاٹ کر گزارہ کر لیتا ہے۔ بچہ مٹی چاٹے تو ماں اس کے منہ پر چپیڑ مار دیتی ہے کہ کیا گندی حرکت کررہے ہو حالانکہ اکثر سانپ چھ چھ ماہ تک سوراخوں میں مٹی چاٹ کر گزارہ کررہے ہوتے ہیں بعض جانور اور بدبودار کیڑے مکوڑے ایسے بھی ہوتے ہیں جنہیں سانپ بڑے مزے سے کھارہا ہوتا ہے مگر بعض حساس طبیعت انسانوںکو دیکھ کر الٹی آجاتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے سانپ کے لئے قسم کی غذا مہیا کردی مگر انسان کی غذا میں بھی بڑے تنوع کی ضرورت ہے روحانی غذا میںبھی بڑا کچھ چاہئے اور یہ سب کچھ اللہ تعالیٰ نے پیدا کیا ہے۔ وہ مالک ہے۔ کسی کا اللہ تعالیٰ پر حق بن ہی نہیں سکتا ۔ دنیا تو اس کی ہے اور اس کی غلام اور مملوک ہے اور اس کی مخلوق ہے وہ اس پر کیاحق جتائے گی؟ عقل بھی یہ فتویٰ نہیں دیتی کہ تم اللہ پر حق جتاسکو۔
    پس رحیمیت جزا کا حق قائم کرتی ہے اور صفت مَالِکِ یَوْمِ الدِّیْنِ حق دیتی یا انکار کردیتی ہے جب انکار کرنا ہوتا ہے تو اللہ تعالیٰ فرماتا ہے تمہارا مجھ پر کیا حق ہے؟ جائو دوڑ جائو مگر جب دینا ہوتا ہے تو کہتا ہے میرے پیارے بندو! ادھر آئو میں تمہیں اپنی گود میں بٹھائوں اوراپنی رضا کی جنتوں میں لے جائوں وہ مالک ہے چاہے تو ساری دنیا کو بخش دے اور چاہے تو ساری دنیا کو نہ بخشے کوئی اسے کچھ کہنے والا نہیں اس خدا کو ہم مانتے ہیں محض اللہ کے لفظ کو نہیں بلکہ اس کی تمام صفات کے ساتھ مانتے ہیں جن میں سے بنیادی صفات جو ہیں وہ یہ چار صفات ہیں جو سورۂ فاتحہ میںبیان ہوئی ہیں یعنی ربّ، رحمان، رحیم اور مالک یوم الدین۔
    پس ایمان باللہ کا یہ مطلب نہیں ہے کہ کہہ دیاکہ ہم اللہ پر ایمان لاتے ہیں ایمان باللہ کے بعد تودوسری کوئی چیز ہی نہیں رہتی۔ ایمان باللہ کے بعد رشوت پر انحصار، ایمان باللہ کے بعد یہ غبن اور دوسری بدعنوانیوں کا سہارا لینا یہ باتیں ایمان کے ساتھ کیسے اکٹھی ہوسکتی ہیں۔ ایمان باللہ کے ساتھ کوئی چیز نہیں رہتی صرف اللہ ہی اللہ رہتا ہے یا وہ شخص ہوتاہے جس نے اللہ تعالیٰ سے فیض حاصل کرنا ہوتا ہے اورکچھ نہیں رہتا پس اس اللہ پر ایمان لانا ہے اوریہ بنیادی چیز ہے اس کی تفصیل بہت لمبی ہے۔ دراصل اگر اس سارے کارخانہ پر تقریر کی جائے تو سارا اللہ ہی اللہ آجا تاہے۔ چند باتیں میں نے بیان کردی ہیں اوراللہ پر اس رنگ میں ایمان لانے کے نتیجہ ہی میں پھر ایمان بالآخرۃ،ایمان بالغیب اور ایمان بالرسل اور ایمان بالکتب وغیرہ جسکی قرآن کریم نے تفصیل بیان کی ہے جو دراصل ایمان کے مختلف شعبے اور شکلیں ہیں ان پر ایمان پختہ ہوتاہے اس لئے اگر ایمان باللہ صحیح نہیں تو آگے کچھ نہیں۔
    آپ بھی دعاکریں میں بھی دعا کرتا ہوں کہ یہ جو ہمارا رب، مالک، پیداکرنے والا، رزّاق اور متصرف بالارادہ ہستی ہے جس سے دوری اور بُعد ہی ہرقسم کا نقصان اور ضیاع ہے اور جس کے قرب میں ہرقسم کی بھلائی ہے اس پر ہم سب کو حقیقی ایمان نصیب ہو۔ ہمارے دل اس ایمان میں منور ہوجائیں اور جس طرح آدمی چٹان پر پختگی کے ساتھ قائم ہوتا ہے اللہ تعالیٰ اور اس کی معرفت سے زیادہ کوئی پختہ چیز نہیں۔ اللہ تعالیٰ پر ایمان اور اس میں یہ پختگی ہمیں حاصل ہو تاکہ جو کام اللہ تعالیٰ ہم سے لینا چاہتا ہے وہ ہم سے لے اور ہم اس کے ہاتھ میںجاکر کمزور ہتھیار کی طرح ٹوٹ نہ جائیں اس کاتوکوئی نقصان نہیں اس کے پاس اتنے ہتھیار ہیںکہ اگر آپ ٹوٹے تو آپکو پھینک دے گا دوسرے ہتھیار کوپکڑ لے گا۔اس کے خزانے میں کوئی کمی نہیں ہے مگر ہمیں اس کا نقصان ہے۔ ہم مارے گئے اگرہم اس سے دور ہوگئے اگر ہم اس کی ناراضگی کا مورد بن گئے تو پھر ہمارا کہیں بھی ٹھکانا نہیں ہے دنیا ہمیں پہلے ہی اسّی سال سے گالیاں دیتی چلی آرہی ہے لوگ ہمیں کافر کہتے چلے آرہے ہیں اور جو اُن کے منہ میں آتا ہے وہ ہمارے خلاف بک دیتے ہیں اور ہمیشہ ہمیں تنگ کرنے اور گالیاں دینے کی نئی سے نئی ترکیبیں سوچتے رہتے ہیں ہم میں سے جولوگ ایمان پرپختگی سے قائم ہیں وہ ان کی پروا بھی نہیں کرتے کیونکہ اصل ناراضگی اللہ تعالیٰ کی ہے کسی گروہ کی ناراضگی کچھ بھی بگاڑ نہیں سکتی کسی کے پاس ہے ہی کچھ نہیں وہ ہمارا نقصان کیا کرے گا اسے اللہ تعالیٰ نے اتنی طاقت ہی نہیں دی نہ وہ متصرف بالآرادہ ہے پس کوئی منافق کی شکل میں آکر ہمیںدکھ پہنچاتا ہے کوئی مخالف اور معاند کی شکل میں آکر ہمیں دکھ پہنچاتا ہے۔ مگر اسّی سال میں اس نے کیا کرلیا حالانکہ اس اسّی سال کے عرصہ میں جماعت بشاشت کے ساتھ چھلانگیںلگاتی ہوئی اپنی ترقیات کی طرف بڑھتی چلی آرہی ہے اور انشاء اللہ بڑھتی چلی جائے گی اس کی وجہ یہ ہے کہ ہم اللہ پر ایمان رکھتے ہیں اگر ہم اللہ پر ایمان رکھتے ہیںتو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ اس کے پرکھنے کی ایک ہی کسوٹی ہے اور وہ یہ ہے کہ جو شخص اللہ تعالیٰ پر ایمان رکھتا ہے وہ خود اپنے نفس کو اور ہر دوسری چیز کو مردہ کیڑے سے بھی کم اہمیت دیتاہے اس صورت میں نہ نفس باقی رہتا ہے اور نہ کوئی اور چیزباقی رہتی ہے اللہ ہی اللہ عیاں ہوکررہ جاتاہے اور اگر اللہ ہی اللہ میرے اور آپ کے سامنے ہوتوپھر اور کیا چاہئے اگر اللہ پر ایمان اور اس کی صفات کی معرفت حاصل ہوتو کچھ بھی نہیں چاہئے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین
    (از رجسٹر خطباتِ ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز


    اللہ تعالیٰ پر ایمان لائو اور ایمان کے تقاضوںکو
    پورا کرو تب تم اللہ تعالیٰ کی پناہ میں آجائو گے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ۲۱؍ا گست۱۹۷۰ء بمقام مسجد نور راولپنڈی ۔غیر مطبوعہ)
    تشہّد و تعوذ اور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے ان آیاتِ کریمہ کی تلاوت فرمائی:-

    (الاحزاب:۱۸)

    (آل عمران:۱۱۲)
    اسکے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم بنی نوع انسان کے لئے ایک مجسم شفقت اور عالمین کے لئے ایک کامل رحمت کے طورپر دنیا میں مبعوث ہوئے۔ آپ کی شفقت اور محبت آپ کی دعائوں اور روحانی فیوض سے پہلوں اور پچھلوں سبھی نے حصہ پایا۔ آپ کی یہ رحمت، رحمت عام تھی لیکن آپ کی اس رحمت نے دنیا کو ایک خاص ہی نہیں اخص جلوہ بھی دکھایا۔ آپ کے فیوض کے نتیجہ اور الٰہی بشارتوں کے ماتحت آپ کی امت میں سے لاکھوں کروڑوں اولیاء اللہ پیدا ہوئے جواللہ تعالیٰ کے مقرب بندے تھے مگر ان لاکھوں کروڑوں اولیاء اللہ میں سے آپ نے صرف ایک کا انتخاب کیا اور امت کو یہ تاکید فرمائی کہ جب ہمارا وہ مہدی مبعوث ہوتو میرا اسے سلام کہنا۔ سلام کے پہنچانے میں بہت سی حکمتیں ہیں ایک تو یہ کہ امت محمدیہ کو اس طرف متوجہ کیا کہ وہ میرا محبوب ہے تم بھی اسے محبوب رکھنا دوسرے اس میں یہ بھی حکمت تھی کہ اللہ تعالیٰ امت محمدیہ کو یا یوں کہنا چاہئے کہ امت محمدیہ کے اس حصہ کو جو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی بعثت کے وقت دنیامیں موجود ہوگا اس طرف متوجہ کیا کہ مہدی معہود اوراس کی جماعت میری سلامتی کی دعائوںکے حصار کے اندر ہونگے اور میری دعائوں کے نتیجہ میں اللہ تعالیٰ ان کی حفاظت کرنے والااور ان کو امان دینے والا اور ان کے لئے سلامتی کے سامان پیدا کرنے والاہے۔ اگرتم(امت کے دوسرے افراد) بھی اللہ کی حفاظت اور امان میںآنا چاہو تو تمہارے لئے یہ ضروری ہو گا کہ تم ہند کے اس قلعہ یعنی جو حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی سلامتی کی دعائوں کا حصار ہے اس کے اندر داخل ہوجاناتم اللہ کی حفاظت اور امان میںرہو گے۔
    ہم جو جماعت احمدیہ میں شامل ہیں یا جوہمارے پہلے بزرگ گزرے ہیں یا آنے والی نسلیں ان تمام کا جو ایمان کے اوپر پختگی سے قائم ہیں یہ عقیدہ ہے کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام ہی دراصل آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے وہ عظیم روحانی فرزند ہیں جس پر آپ نے اپناتاکیدی سلام بھجوایا تھا۔ حضرت مسیح اور مہدی معہود علیہ السلام نے جب دنیا کو اس طرف دعوت دی کہ خدا کے وعدہ کے مطابق ان تمام سلامتیوں کو سمیٹو جن کی بشارت حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے دی تھی میں تمہاری طرف اس لئے مبعوث ہوا ہوں کہ تمہارے لئے پناہ اور سلامتی کا انتظام کروں۔
    غرض اللہ تعالیٰ کے یہ وعدے ہیں حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی معقول دعائوں کی یہ بشارتیں ہیں کہ وہ سلامتی کا شہزادہ ہوگا۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو جب یہ الہام ہوا تو دراصل یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے سلامتی پہنچانے والے ارشاد مبارک کاایک اور رنگ میں معنی یا تفسیر تھی۔ہماری زبان میں سلامتی کا شہزادہ وہ ہے جسکی سلامتی کے لئے حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دعائیں کیں اور اللہ تعالیٰ نے ان دعائوں کو قبول فرمایا۔
    پس ہم نے اس سلامتی کے شہزادہ کو پہچانا اور آپ پر ایمان لائے اور اس بات پر پختگی سے قائم ہیں اور پورا یقین حاصل ہے کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی دعائوں کے طفیل حضرت مسیح موعودؑ کی طرف حقیقی معنوں میں منسوب ہونے والے شیطان کے ہر قسم کے حملوں اور مخالفین کے ہرقسم کے منصوبوں سے محفوظ رہیں گے۔ دنیا اپنی طرف سے پورا زور لگا چکی ہے لگارہی ہے اور لگاتی رہے گی اورہمیں اس کی ذرہ بھر بھی پرواہ نہیں ہے۔ اسّی۸۰ سال سے دنیا نے مخالفت کا کوئی منصوبہ نہیں چھوڑا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیا بدزبانی بھی کی، ایذا رسانی بھی کی اوراپنی طرف سے ہماری ہلاکت اور تباہی کے سامان بھی کئے حکومت سے چغلیاں بھی کیں جھوٹے مقدمات بھی بنائے۔ غرض اپنی طرف سے پورا زور لگایا لیکن وہ وجود جسے اللہ تعالیٰ کے ہاتھ کا سہارا اور حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سلامتی کی دعائیں حاصل تھیں دنیا کی کون سی طاقت تھی جو اسے ہلاک یا تباہ کرسکتی یا اس کے لئے ناکامیوں کے سامان پیدا کرسکتی؟ اسّی سال سے مخالفت ہرقسم کے منصوبے بناتی رہی ہرقسم کی سازشیں کرتی رہی مگر ان اسّی سالوں میں دنیا کے کونے کونے میں اللہ تعالیٰ کے فرشتوں نے پہنچ کر دنیا کے دلوں میں ایک انقلاب پیدا کیا اور جس شخص کو ظاہری اقتدار رکھنے والوں نے(سیاسی اقتدار ہو مذہبی کچھ ہو) دھتکار دیا اور نفرت اور حقارت کی نگاہ اس پر ڈالی ان کے لئے خدا تعالیٰ نے۷۔۸ ہزارمیل دور بسنے والوںکے دلوں میں چاہت کا ایسا سمندر پیدا کیا کہ جو انسانی عقل کو حیران کرنے والا ہے دنیا اپنا کام کرتی چلی گئی مخالفین اپنے منصوبے بناتے چلے گئے کفر کے فتوے دینے والوںنے آسمان سرپر اٹھا لیا شور مچا مچا کر کہ یہ کافر ہے لیکن اس شور وغل میںاس شخص کو اور اس کے ماننے والوں کے کانوں میں اللہ تعالیٰ کے پیارکی یہ آواز گونجی کہ دنیا تمہیں کافر کہتی ہے لیکن میںتمہیں مسلمان سمجھتاہوں اورتمہارے ساتھ ہوں دنیا کے کافر کہنے سے کیا بنایا کیا بن سکتاہے؟ کفر تو وہ ہے جس کا فتویٰ خدا دے *** تووہ ہے جو آسمان سے نازل ہو۔ کبھی کوئی دنیا دار بھی آسمانی لعنتوں کے سامان پیدا کرسکتاہے؟ ایک ذرہ بھر عزت دینے کے توتم قابل نہیںہو ذلیل کرنے کی طاقت تمہیں کس نے دی ہے؟ذلیل تووہی ہے جو خدا کی نگاہ میں اپنے لئے ذلت دیکھتا ہے اور اپنے کام میں اپنے لئے ذلت کے سامان محسوس کررہا ہے اورعزت وہ ہے جو خدا سے ملتی اور خدا کے سرچشمہ سے نکلتی ہے۔ اَلْعِزَّۃُلِلّٰہِ۔اَلْعِزَّۃُلِلّٰہ۔اَلْعِزَّۃُ لِلّٰہِ۔ عزت کا سرچشمہ تو اللہ تعالیٰ کی ذات ہے جسے وہ عزت کی نگاہ سے دیکھتا ہے ساری دنیا بھی اگر مل کر اسے ذلت کی نگاہ سے دیکھنے لگ جائے توکیا فرق پڑتا ہے۔ کوئی فرق نہیں پڑتا کیونکہ یہ ساری دنیا اس کے قبضہ اور تصرف میں ہے جیسا وہ چاہتا ہے ویساہوتا ہے کوئی طاقت اس کے ارادہ میں تبدیلی نہیںپیدا کرسکتی اور نہ اسکا مقابلہ کرسکتی ہے۔
    اللہ تعالیٰ نے حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے مہدی معہود کے لئے سلامتی کی دعائیں کروائیں اللہ تعالیٰ نے مہدی معہود کو خود وحی کے ذریعے فرمایا کہ تم سلامتی کے شہزادے ہو صرف تم ہی محفوظ نہیں بلکہ جو رعایا(یعنی جماعت) ہے وہ بھی محفوظ رہے گی سلامتی کے شہزادے کے معنے ہی یہ ہیں۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی امت سے یہ کہا کہ جب میرا محبوب ترین روحانی فرزند آئے تو دیکھنا وہ سلامتی کا شہزادہ ہوگا تم اسے میری طرف سے سلام پہنچانا اورسلامتی حاصل کرنے کے لئے اور خدا کی امان میں آنے کے لئے اس کے متّبعین اور اس کے ساتھیوں میں شامل ہوجانا۔غرض حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے امت محمدیہ کو یہ فرمایا کہ سلامتی چاہتے ہو دنیا میں عزت چاہتے ہو،دنیا میںبڑائی چاہتے ہو، دُنیا میں غلبہ چاہتے ہو، دُنیا میں ایک ارفع مقام چاہتے ہو تو اس کے ساتھ شامل ہونا پڑے گااور اس کے کان میںیہ کہا اَللّٰہُ یُعْلِیْنَا وَلَا نُعْلٰی اللہ تعالیٰ ہمیں ارفع اور بلندکرے گا اور کوئی دوسری طاقت ہمارے اوپر غالب نہیں آسکتی چنانچہ ہم اس مہدی معہودپر ایمان لائے۔
    اللہ تعالیٰ نے امت محمدیہ کو عصمت کا ایک عام وعدہ بھی دیا تھا جو قرآن کریم کی مختلف جگہوں میںآیا ہے میں نے اس وقت چارمختلف آیتیں یا ان کے ٹکڑے لے کر ان کی تلاوت کی ہے۔ اللہ تعالیٰ سورۂ احزاب میں فرماتا ہے کہ دیکھو اس اصول کو کبھی بھولنا نہیں ہے کہ ذلت اور عذاب کا حکم آسمانوں سے اللہ تعالیٰ کی طرف سے آتا ہے اسی طرح رحمت کا حکم بھی آسمانوں ہی سے آتا ہے اوراگر اللہ تعالیٰ کسی کو ذلیل کرنے کے لئے یاکسی کو عذاب پہنچانے کے لئے یا کسی پر اپنی گرفت کو مضبوط کرنے کے لئے آسمانوں پر فیصلہ کرے تو دنیا کی کوئی طاقت نہ ایسے انسان کو عزت دے سکتی ہے اورنہ الٰہی عذاب سے اسے بچا سکتی ہے اورنہ عذاب الٰہی کی گرفت سے اسے چھڑوا سکتی ہے لیکن اس کے مقابلے میں اگر کسی شخص یاکسی قوم یا کسی جماعت کے لئے اللہ تعالیٰ کی رحمت جوش میں آئے توساری دنیا اگر اس کے خلاف مخالفانہ کاروائی شروع کردے تب بھی اللہ تعالیٰ کی رحمت کے جوش میں کمی نہیں آسکتی کیونکہ وہ رحمت اللہ تعالیٰ کی رحمت ہے جو اس کے بندوں کے لئے جوش میںآتی ہے کوئی شخص اس کی رحمت کوروک نہیںسکتا۔
    اس میں ہمیں صرف اصولی طور پر یہ بتایاگیا ہے کہ اللہ تعالیٰ اور اس کی صفات پر پختہ ایمان لانا ضروری ہے(ایمان کے متعلق میں نے پیچھے دو خطبے دئیے ہیں ابھی چھپے نہیں۔ میں نے ان خطبات میں بتایاہے کہ) اللہ پر پختہ ایمان کے معنے یہ ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی صفات کی معرفت حاصل ہواور ہم ان پر پختگی کیساتھ ایمان لانے والے ہوں۔ معرفت کے بغیر ایمان پختہ نہیں ہوتا کوئی یہ نہ سمجھے کہ معرفت کے بعد پختگی ایمان ضروری ہے یہ درست نہیں ہے مثلاً شیطان کواللہ تعالیٰ کی صفات کی پوری معرفت تھی لیکن پھر بھی اس نے شیطنت کی، بغاوت کی اور اباء اور استکبار اختیار کیا۔ پس معرفت بھی ہو اورپھر پختگی ایمان بھی ہو تب اللہ تعالیٰ کا یہ جو مطالبہ ہے کہ میرے اوپر اور میری صفات پر پختہ ایمان لائو وہ پورا ہوتا ہے۔
    اللہ تعالیٰ کی ایک صفت جو اس آیت میں بیان ہوئی ہے اس پر ہمارا پختہ ایمان ہونا چاہئے اور وہ یہ ہے جس شخص کو اللہ تعالیٰ عذاب کی گرفت میں لانا چاہے تو نہ کوئی قضا اسے بچا سکتی ہے نہ کوئی سیاست اسے محفوظ رکھ سکتی ہے نہ کوئی دنیا کا منصوبہ اس کی حفاظت کاسامان پیدا کرسکتا ہے اور اگر اللہ تعالیٰ کی رحمت جوش میں آئے تو بڑے بڑے دنیا دار لوگ جو مرضی کرتے رہیں کچھ نہیں ہوتا کوئی نتیجہ نہیں نکلتا۔
    جب حضرت مہدی معہود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے دعویٰ کیا تو اس وقت کے علمائے ظاہر میںسے جو چوٹی کے علماء تھے وہ اکٹھے ہوئے انہوں نے سرجوڑا، مشورے کئے منصوبہ بنایا اور پھر سارے ہندوستان کے دو سوبڑے بڑے علماء کے دستخطوں سے آپ کے خلاف کفر کا فتویٰ شائع کردیا۔ لوگ بڑے خوش ہوئے کہ چوٹی کے دو سو عالِموں نے اس مدّعی مہدویت کے خلاف کفر کا فتویٰ لگا دیاہے وہ سمجھتے تھے کہ چوٹی کے دوسو علماء اگر کسی پر کفر کا فتویٰ لگائیں تو وہ ذلیل اور ناکام ہوجاتا ہے اُن کا یہ خیال تھا تبھی انہوں نے یہ فتویٰ دیا نا! مگر خدا تعالیٰ آسمانوں پر مسکرارہا تھا اور وہ کہہ رہا تھا کہ یہ میرا بندہ ہے اور میں اسے عزت دوں گا میں نے اسے اپنے کام کیلئے کھڑا کیا ہے یہ کامیاب ہوگا۔ دوسو کیا اگر ساری دنیا کے دولاکھ چوٹی کے علماء بھی فتویٰ دیںتو وہ اس کا کچھ بگاڑ نہیں سکتے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام تحریر فرماتے ہیں کہ جس وقت ان سب نے میرے خلاف یہ منصوبہ بنایا چند غیر معروف آدمی میرے ساتھ تھے چنانچہ مخالفین بڑے خوش ہوئے کہ وہ مارا وہ گرایا مگر اس خدا نے فرمایا میرے ہاتھ پر یہ بیٹھا ہے تمہیں طاقت ہے اسکو مارنے اور گرانے کی؟ ہر گز نہیں چنانچہ جو خدا نے فرمایا وہی پورا ہوا حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو اللہ تعالیٰ نے یہی وعدہ دیا ہے انہی الفاظ میں کہ تو اورتیرے ماننے والے میری حفاظت میں ہیں اور یہ لوگ تمہارا کچھ بگاڑ نہیں سکتے۔
    پس دنیا کی قضا یا دنیا کی سیاست یا دنیا کا انتظام یا دنیا کے منصوبے یا دنیا کے علماء یادنیا کے فلاسفر احمدیت کو نہیں مٹا سکتے اسلئے کہ خدا تعالیٰ نے یہ فرمایا ہے کہ یہ احمدیت کونہیں مٹا سکتے اسلئے نہیں کہ ہمارے اندر کوئی خوبی ہے آپ سے تو میں یہ کہوں گا کہ آپ عاجزانہ راہوں کواختیار کریں کبرو غرور کو اپنے دل میں پیدا نہ ہونے دیں اور اس دل کو کبروغرور کی بجائے اللہ تعالیٰ کے وعدوں پر پختہ یقین کے ساتھ بھردیں اوراپنے ایمانوںکے تقاضوں کو پورا کریں آپ کے حق میں اللہ تعالیٰ کے وعدے انشاء اللہ پورے ہوتے جائیںگے۔
    پس سورۂ احزاب میں اللہ تعالیٰ نے یہ فرمایا ہے کہ جب اللہ تعالیٰ(اپنی مشیت کے تحت) ذلیل کرنا چاہے یا عذاب دینا چاہے تو تم اس سے بچ نہیں سکتے۔ ساری دنیا کی حکومتیں مل کر بھی تمہیں الٰہی عذاب سے بچا نہیں سکتیں ابوجہل کو کس نے بچایا؟حضرت ابراہیم علیہ السلام کے خلاف جنہوں نے آگ جلائی تھی وہ کہاں ہیں؟ انبیاء کے مخالفین یاان کی اولاد کہاں ہے؟ اللہ تعالیٰ نے ان کو مٹا دیا۔ حضرت نوح علیہ السلام پر تمسخر کرنے والے اور انہیں کافر کہنے والے کدھر گئے؟ طوفان کے اندر بہہ کرسمندر کی تہوں میں شاید ان کے ذرّے بکھرے ہوئے ہوں مگر ان کا نام ونشان مٹ گیا پھر اللہ تعالیٰ نے اس کی مخلوق تو اسے پیاری ہے نا! ان ظالموںکے جسموں کے ذروں کو شاید ان گھوڑوں میں بھی تبدیل کردیا ہو جن پر سوار ہوکر مسلمان ایک طرف ایران میں اور دوسری طرف روم کی سلطنت میں گھُس گئے۔ کون کہہ سکتا ہے ہم نے تونہ ذروں کا پیچھا کیا اور نہ ہم معلوم کر سکتے ہیں کہ وہ کدھر گئے لیکن اس مادی دنیا کے ذرے تو اللہ تعالیٰ کے حکم کے ساتھ اپنی شکلیں بدلتے رہتے ہیں۔
    بہر حال اللہ تعالیٰ نے ہمیں یہ بتایا ہے کہ اگر میرے عذاب سے بچنا چاہتے ہو اگر میری ذلت سے بچنا چاہتے ہو توتمہیں میرے پاس آنا پڑے گا کوئی اور تمہیں بچانہیں سکتا اور اگر میری رحمت کے تم وارث ہوجائو تو دنیا کی طرف تمہیں نگاہ کرنے کی ضرورت نہیں کیونکہ دنیا تو ایک مرے ہوئے مچھر کے کیڑے سے بھی کم حقیقت رکھتی ہے پھر تمہیں ان کی کیا پرواہ ہے؟
    یہ مضمون مختلف آیات میں اپنےContext(کنٹیکسٹ)میں بھی ہے اور جومیں نے ان آیات کی ترتیب دی ہے اس سے ایک اور مضمون ابھرتا ہے پہلی آیت میں یہ بتایا تھا کہ عذاب یا رحمت کا پہنچانا صرف اللہ تعالیٰ کا کام ہے ا س واسطے اس میں یہ اشارہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کی طرف رجوع کرو اگر تم اس کے عذاب سے بچنا اور اس کی رحمت سے حصہ لینا چاہتے ہو۔ سورۃ النساء کی اس دوسری آیات میں(جس کی میں نے تلاوت کی ہے) یہ کھول کر بتایا گیا ہے کہ اِعْتَصَمُوْا بِہٖ اللہ تعالیٰ کے ذریعہ سے شیطانی یلغار، نفس کی یلغار، دل کے بد خیالات ہیں ان کی یلغار، نفاق کی یلغار، مخالفت کی یلغار،انکار کی یلغار اور مخالفانہ منصوبوں کی یلغار اور سب لوگوں کے اکٹھے ہوکر مغلوب کردینے کی یلغار سے اپنے بچائو کا انتظام کرو۔ جتنی بھی کوئی تصور میں لاسکتا ہے یا حقیقت میں پیدا ہوسکتی ہیں ان سے بچنے کا ایک ہی ذریعہ ہے اور وہ یہ ہے کہ اللہ کو اپنا ذریعہ بنائو اس کی طرف آئو اور اس کا ذریعہ یہ ہے فَاَمَّا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا بِاللّٰہِ وَاعْتَصَمُوْا بِہٖ(النساء:۱۷۶) اللہ تعالیٰ پر ایمان لائو اور ایمان کے تقاضوں کو پورا کرو تب تم اللہ تعالیٰ کی پناہ میں آجائو گے اور جب تم اللہ کی پناہ میں آجائو گے تو پھر دنیا تمہیں ذّلت کے گڑھے میں پھینک نہیں سکے گی پھر دنیا تمہیں عذاب کے تندور کے اندر دھکیل نہیں سکے گی پھر دنیا تمہارے ناک میں نکیل ڈال کر ذلیل کرنے کے لئے گلیوں میں پھرا نہیں سکے گی بلکہ پھر یہ ہوگا۔ فَسَیُدْخِلُھُمْ فِیْ رَحْمَۃٍ مِّنْہُ وَفَضْلٍ( النساء:۱۷۶) اللہ تعالیٰ اپنی رحمت میں تمہیں داخل کردے گا اپنے فضل کے محلوں کے اندر تمہیں لے جائے گا اپنے سلامتی کے حصار میں تمہیں رکھے گا وَیَھْدِیْھِمْ اِلَیْہِ صِرَاطاً مُّسْتَقِیْمًا(النساء:۱۷۶)اور جو اس نے قرآن کریم کے ذریعہ ایک سیدھا راستہ اپنی طرف پہنچانے کے لئے مہیا کیا ہے اس پر تمہاری انگلی پکڑے گا اور اس راستے پر تمہیں لے جائے گا اورتم کامیاب ہوجائو گے کیونکہ جو شخص صراط مستقیم پر اللہ تعالیٰ کی انگلی پکڑ کر چل رہا ہواسکے ناکام ہونے کاکوئی سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔
    دوسری جگہ یہ فرمایا کہ جب ہم نے یہ کہا ہے کہ ایمان لائے(وہاںوہ ماضی کا صیغہ ہے مفہوم وہی ہے) کہ جولوگ ایمان لائے یا اگر تم ایمان لائوتو اللہ تعالیٰ کواپنی پناہ کا ذریعہ بنالو اوراسکے نتیجہ میں رحمت اور فضل تمہیں ملے گا۔ ذّلت اور رسوائی اور ناکامی اور دشمنوں کا غلبہ تمہارے نصیب میں نہیں ہوگا۔
    پس اللہ تعالیٰ فرماتا ہے اس ایمان کے جو تقاضے ہیں وہ تمہیں پورے کرنے چاہئیں پھر فرمایا وَ اِنْ تَصْبِرُوْا وَتَتَّقُْوْا یہاں تقویٰ ایک اور وسیع مفہوم میں استعمال ہوا ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ اگرتم میرے ان احکام کا جو میں نے قران کریم میںدئیے ہیں بجا آوری میں ثابت قدمی دکھائو اوراگر تم دنیا کی تمامTemptations(ٹیمپٹیشنز) یعنی وہ باتیں جوغیراللہ کی طرف کھینچنے والی ہیں ان سے تم بچو تو لَایَضُرُّکُمْ کَیْدُھُمْ شَیْئًا تو جو تمہارا دشمن ہے ان کاکوئی منصوبہ تمہیں ضرر یا تکلیف نہیں پہنچاسکتا غرض اللہ تعالیٰ نے جو احکام جاری کئے ہیں جسے ہم اسلام کہتے ہیں اور سارے احکام سے مل کر اسلام بنتا ہے۔کسی ایک حکم کے مطابق بھی اگر شیطان کی طرح انسان اللہ تعالیٰ کے مقابلے میںکھڑا ہوجائے تو اس کی ناراضگی کو مول لینے والا ہے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ اگر تم اللہ تعالیٰ کے فضلوں کا وارث بننا چاہتے ہوتو چھ سو سے زائد حکم جو قرآن کریم میں ہیں تم ہر ایک کی تعمیل کرو اور قرآن کریم کی پوری تعلیم کا جوأ اپنی گردن پر رکھو تب تم ان فضلوں کے وارث ہوگے۔
    آل عمران کی اس آیت میں یہاں اللہ تعالیٰ یہ فرماتا ہے کہ تم ثباتِ قدم دکھائو جو تعلیم دی ہے جو سیدھا راستہ ہے اس سے اِدھر اُدھر نہیں ہونا خواہ کچھ ہو جائے اس پر تم نے قائم رہنا اور یہ کامل معرفت اوراللہ تعالیٰ کی ذات وصفات پر کامل ایمان کا نتیجہ ہے۔ پہلے لوگ جن کے ساتھ آپ اپنے آپکو فخر کے ساتھ بلایا کرتے ہیں کہ ہم ان سے مل گئے یعنی ’’صحابہ سے ملا جب مجھ کو پایا‘‘ کے ماتحت تو ان کا نمونہ یہ ہے کہ چارچار پانچ پانچ گنا زیادہ فوج سامنے ہوتی تھی ہتھیاروں میں بھی کئی کئی گنا زیادہ اور تعداد میں بھی زیادہ۔ بڑی اچھی تلواریں بڑے اچھے نیزے بسااوقات ایک ایک کے پاس چھ چھ تلواریں ہوتی ہیں مگر ہمارے مسلمانو ں کی ایسی بیسیوں مثالیں ہیں کہ تلوارہاتھ سے چھوٹ گئی تو دوسری تلوار نہیں چنانچہ اللہ تعالیٰ مدد کوآتا۔ مدّمقابل یعنی دشمن کو کسی نے نیزہ مارا اس کی تلوار اس نے پکڑلی ورنہ وہ موت کے منہ میں اپنے آپکو دیکھتا تھا اللہ تعالیٰ آسمان سے آکر اس کی مدد کرتا تھا اور حفاظت کرتا تھا اور اس کی جان بچ جاتی تھی انہوں نے موت کی کوئی پرواہ نہیںکی۔ الٰہی سلسلے جو ہیں ان کی جدوجہد اور کشمکش میں جانی قربانی بھی دینی پڑتی ہے اور مالی قربانی بھی دینی پڑتی ہے چونکہ اسلام کی مخالف قوتوں کے ساتھ ہماری دلائل کی جنگ ہے اس واسطے اس قسم کی شہادت کا میدان ہمارے سامنے نہیں آتا لیکن ہم اس سے محفوظ نہیں ہیں ہمارے عبداللطیف صاحب شہید دلائل کی تلوار لے کر گئے تھے اورپتھروں کی نوکوں سے انہیں شہید کردیا گیا یہ دروازہ کلی طور پر بند نہیں شکل کچھ بدلی ہوئی ہے جب مخالف دلائل سے عاجز آجاتا ہے تو وہ کہتا ہے اور تو کچھ نہیں بنتا چلو اسکو ماردو۔ وہ یہ نہیں سمجھتا کہ ایک کو تم نے جنّت میں بھیج دیا اور دس ہزار اس کے مقابلے میں اور پیدا ہوگئے جن میں پہلے اتنی پختگی نہیں تھی جتنی اس شہادت کے بعد پیدا ہوگئی ایک ہزار صحابیؓ یرموک کے میدان میں شہید ہوا ہے اور یہ وہ صحابی نہیںتھے جنہوں نے ایک دفعہ آکر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کودیکھا اورواپس چلے گئے سارے تربیت یافتہ تھے جو شہید ہوئے اور ان میں ایک سو بدری صحابیؓ تھے جب کہ بدری صحابہؓ کی کل تعداد ۳۱۳ہے جن میں سے کچھ اس سے پہلے فوت بھی ہوچکے ہونگے بہرحال یرموک کی جنگ میں ایک سوبدری صحابیؓ شہید ہوئے ہیں۔ اللہ تعالیٰ اور اُخروی زندگی پر انہیں اس قدر پختہ ایمان تھا کہ میں نے کئی دفعہ سوچا ہے کہ وہ لوگ اِس دنیا سے اُس دنیا کی طرف اس قدر خوشی اورآسانی کے ساتھ انتقال کرجاتے تھے کہ شاید ہمیں اس سے زیادہ بوجھ محسوس ہوتا ہو اپنے سونے والے کمرے سے بیٹھنے والے کمرے تک پہنچنے میں۔ کوئی فرق ہی نہیں تھا جس طرح نائیلون کا پردہ بیچ میں پڑا ہودوزندگیوں میں توکہتے کچھ نہیں اس پردے کے سامنے سب کچھ نظر آرہا ہے کوئی پرواہ ہی نہیں تھی یہ ایمان چاہئے اور وعدہ بڑا زبردست ہے اللہ تعالیٰ نے اسی لئے فرمایا ہے کیونکہ بعض نے شہید ہونا تھا۔لَنْ یَّضُرُّوْکُمْ اِلَّا اَذًی (اٰل عمران:۱۱۲) تمہیں تھوڑی سی تکلیف اجتماعی زندگی کے لحاظ سے پہنچے گی یعنی یرموک کے شہداء جن میں ایک ہزار صحابی اور۴۔۵ ہزار دوسرے مسلمان شہید ہوئے اور ان کے مقابلے میں دشمن اپنی وہاں ستر ہزار لاشیں چھوڑ کر بھاگا تھاکوئی مقابلہ ہی نہیں جو ایذاء ان کو اس میدان میں پہنچی اس کے مقابلے میں جو مسلمانوں کوقربانی دینی پڑی اس کے متعلق بغیر کسی حاشیہ آرائی یا مبالغے کے یہ کہا جا سکتا ہے لَنْ یَّضُرُّوْکُمْ اِلَّا اَذًی (اٰل عمران:۱۱۲)تمہیں تکلیف پہنچے گی لیکن اس کے بدلے میں تمہیں اتنی زبردست فتح ملے گی کہ تمہاری تکلیف یا تمہاری قربانی یاتمہارے آدمیوںکی تعداد جو شہید ہوئے کوئی حیثیت ہی نہیں رکھے گی اور یہ وہ جنگ تھی جس نے روم جیسی بڑی سلطنت کی جڑکاٹ کررکھدی تھی اس سے پہلے بھی معمولی جنگیں ہوئیں، بعد میں بھی ہوئیں لیکن یہاںتو بعض کے کہنے کے مطابق اڑھائی لاکھ رومی اکٹھا ہوا ہوا تھاا نہوں نے یہاں اپنی آخری بازی لگائی تھی یا ہاریں گے یا ہماری سلطنت تباہ ہوگی اورکوئی بچ کرگیاہے؟ آدمی تاریخ پڑھکر حیران رہ جاتا ہے عقل تیز، فراست تیز، تلوار کی دھار تیز، گھوڑوں کی جہت تیز، نیزوں کی انیّ تیزہر چیز میں تیزی آئی ہوئی تھی۔ اس کے مقابلے میں ان کی عقلیں ماری ہوئیں دلوں کے اندھیرے،سمجھ نہیں آتا تھا خود بھاگ کر ایسی جگہ پہنچ گئے کہ جہاں ڈھلوان کوئی نہیں تھی اور جب پیچھے سے مسلمانوں کا دبائو پڑا تو ایک دوسرے کو دھکا دیتے ہوئے پہاڑی سے نیچے گرتے گئے اور مرتے چلے گئے ورنہ چندہزار کا سترہزارآدمیوں کوقتل کرنے کے لئے تلواریں چلانے سے بھی شاید بہتوں کے پٹھے ہمیشہ کے لئے بیمار ہوجاتے لیکن آپ ہی اپنی موت کا سامان بن گئے بھاگے توادھر بھاگے ، یہ ٹھیک ہے کہ حضرت خالدؓ کی فراست تھی انہوںنے خاص جہات سے ان پر دبائو ڈالا تھا لیکن ان کی توعقل ماری ہوئی تھی ورنہ وہ حضرت خالدؓکی فراست سمجھ کر دوسری جگہ کا رُخ کرسکتے تھے۔
    بہر حال اللہ تعالی فرماتا ہے کہ ایذاء تو تمہیں پہنچے گی لیکن معمولی سی ایذاء ہوگی ان بشارتوں کے مقابلے میں، ان فتوحات کے مقابلے، میں ان قربانیوں کے مقابلہ میں، اس پیار کے مقابلہ میں جو اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں تمہیں نظر آئے گا اس کی رضا کے مقابلہ میں جسے تم حاصل کرو گے کتنے ہیں جو چارپائی پر جان دیتے ہیں میںسوچا کرتا ہوں کہ دنیا میں سب سے زیادہ خطرناک چارپائی ہے کیونکہ سب سے زیادہ اموات چارپائی پر ہوتی ہے۔ جنگوں میں خصوصاً پچھلی دو عالمگیر جنگوں میں بڑی قتل وغارت ہوئی لیکن میںسمجھتا ہوں کہ چھ ماہ میں چار پائی پر مرنے والوں کی تعداد ان مرنے والوں کی تعداد سے زیاد ہ ہے جوان جنگوں میں مارے گئے۔
    پس مرنا تو ہرایک نے ہے سوال یہ ہے کہ کیا تم نے چارپائی پر مرنا ہے؟ موت کاکوئی وقت مقررنہیں ایک آدمی باہر سے بڑاہنستا کھیلتا آتا ہے بیوی سے کہتا ہے میرے کھیت بڑے لہرارہے ہیں۔ بڑی آمد ہوگی بیوی پانی لے کرآتی ہے وہ پانی پیتا ہے قو لنج ہوتی ہے اور وہیں اسکا دم نکل جاتا ہے۔ چارپائی پر آرام کرنے کے لئے بیٹھے تھے اوروہاں سے جنازہ اٹھ گیا پس اگر توزندگی اور موت میرے یاآپ کے ہاتھ میں ہوتو پھر آپکو یہ اختیار بھی ہے کہ آپ یہ کہیں کہ ہم موت پر زندگی کوترجیح دیتے ہیں لیکن اگر آپ کے ہاتھ میں زندگی اور موت نہیں اوریقینا آپ کے ہاتھ میں زندگی اورموت نہیں تو پھر کس پر کس چیز کو ترجیح دینے کااپنے آپ کو حق دار یا اہل سمجھتے ہو۔ حماقت ہے اس کے علاوہ کچھ نہیں منافقوں نے کہا تھا کہ و ہ موت سے بچکر واپس جارہے ہیں اللہ تعالیٰ نے کہا کہ موت توتمہیں آکر پکڑ ے گی جہاں مرضی چلے جائو ان میں سے کون بچا؟ ایک طرف ذلّت کی موت ہے ایک طرف عزت کی زندگی ہے اورعزت کی موت ہے۔ عزت کی موت مرنے کے بعد کی زندگی ہے اللہ تعالیٰ کا پیار ہے اللہ تعالیٰ کے وعدے ہیں اللہ تعالیٰ کی بشارتیں ہیں اور ہم دیکھتے ہیں اللہ تعالیٰ ہمیں گود میں بٹھاتا اورماتھے کو پیارکرتا ہے ہزاروں آدمیوں کا یہ اپنا ذاتی مشاہدہ ہے اس کو چھوڑ کر کسی ٹٹ پونجئیے جاہل نوجوان کی ہنسی اور تمسخر یا فتوے سے ہم گھبرا جائیںگے؟ مولوی محمد حسین بٹالوی کے فتوے سے ہم نہیں گھبرائے جو ظاہری لحاظ سے بہت بڑے عالم تھے اس وقت کے عالموں کی بھی عجیب حالت تھی بڑے علماء کے دوحصے ہوگئے ایک عیسائیت کی گودمیں جاپڑا اور دوسراحضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام پرکفر بازی کے کام میں مشغول ہوگیا اور جو اُن کے کام تھے وہ انہیں بھول گئے انہوں نے نہیں کئے۔ خدا کرے کہ آج کی نسل ان سے سبق سیکھے اور عبرت حاصل کرے اور اللہ تعالیٰ کے پیار کو حاصل کرے ہمارے دل میں تو کسی کے خلاف نہ غصہ ہے نہ نفرت ہے ہم تو سب کے لئے دعاکرنے کیلئے پیدا ہوئے ہیں اور سب سے پیار کرتے ہیں(اردو میں جو اس معنی میںیہ لفظ استعمال ہوتا ہے) شدید سے شدید معاند کے خلاف بھی ایک لمحہ کے لئے بھی میرے دل میں تو کبھی نفرت اور غصہ پیدا نہیں ہوا میں سمجھتا ہوں کہ کسی سچے احمدی کے دل میں بھی پیدا نہیں ہوتاہوگا ہمارے دل میں تو رحم پیدا ہوتا ہے ہمارے دل میں تو’’بخع‘‘کی حالت پیدا ہوتی ہے۔ یہ ایک لمبا مضمون ہے میں اس وقت اسے بیان نہیں کروں گا اگراللہ تعالیٰ نے زندگی اورتوفیق دی تو انشاء اللہ کسی اور وقت اسے بیان کرونگا۔
    بہرحال ہمیں کسی سے نفرت نہیں ایک نوجوان بڑے جوش میں آئے کہ ہمارے گائوں کا مولوی ہمیں بہت گالیاں دیتا ہے میں مسکرایا اور اس سے کہا کہ تم جاکر اس کی تسلی کرادو کہ جتنا چاہو زور لگا لو ہمارے دل میں تم اپنی نفرت پیدا نہیں کرسکتے۔ ہمیں خدا نے نفرت کرنے کے لئے پیدا ہی نہیں کیا ہمیں پیار سے ساری دنیا کے دل جیتنے کے لئے پیدا کیا ہے ہم عیسائیوں کے دل جیت رہے ہیں تووہ جو کاخِر کُنند دعوٰیِٔ حُبِّ پَیَمْبَرَم (درثمین فارسی صفحہ۱۰۷) ان کے دل بھی تو ہم نے ہی جیتنے ہیں وہ تو پھر بھی اپنے آپ کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف منسوب کرتے ہیں غلطی خوردہ ہیں، لاعلم ہیں سب کچھ ہیں لیکن منسوب تو ہمارے پیارے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف ہوتے ہیں ان سے ہم نے زیادہ پیار کرنا ہے لیکن کسی کے کہنے سے اگر کوئی کچھ فکر کرتا ہے تو اسے اپنی تاریخ کا پتہ نہیں۔
    میں نے بتا یا ہے کہ چوٹی کے دوسو علماء نے اس وقت کفر کا فتویٰ دیا جب کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ساتھ چند آدمی تھے چنانچہ چوٹی کے ان دوسو علماء کے کفر کے فتووں نے آپ کا کچھ نہیں بگاڑا کیونکہ خدا نے کہا تھا کہ یہ میرے پیارے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا محبوب ترین روحانی فرزند ہے اسے میں اپنی گود میں بٹھائوں گا اور یہ میری پناہ میںرہے گا دنیا جو مرضی کرلے لوگ اس کا کچھ نہیں بگاڑ سکتے بے شمار وعدے ہیں آپ کو دیکھنے چاہئیں مجھے بتانے چاہئیںمیں انشاء اللہ بتائوں گا ہمارا انہوںنے کیا بگاڑا؟ جو آج ایک یا دویا زیادہ جو اُن مولویوں کے مقابلے میںظاہری علمیت بھی کچھ نہیں رکھتے ان کے کفر کے فتوے ہمارا کیا بگاڑ لیںگے؟ جو مرضی کرتے رہیں۔ ہمیں جو کرنا چاہئے وہ یہ ہے کہ ہم ان کے لئے دعائیں کریں۔ اللہ تعالیٰ ان کی آنکھیں کھولے ان کے اندھیروں کو دُور کرے اور ان کے سینوں کو نور سے بھردے۔ اللہ تعالیٰ جس طرح ہم سے پیار کررہا ہے اورہمیں اس کا اہل سمجھتا ہے(خدا کرے کہ ہم اس کے پیار کے ہمیشہ ہی اہل رہیں اور)ا سی طرح یہ لوگ بھی اس کے پیار کے اہل بن جائیں پھروہ دیکھیں گے کہ اللہ تعالیٰ کس قدر پیار کرنے والاہے اور جو لذت انسان خدا سے تعلق رکھ کر حاصل کرتا ہے وہ دنیا کی کسی چیز میں نہیں مل سکتی نہ رشتہ داریوں کے تعلقات میں وہ لذت ہے نہ پھلوں میں وہ لذت ہے نہ اجناس میں وہ لذت ہے نہ پانی میں وہ لذت ہے اور نہ شدید سردی کے موسم میں گرم لحاف میں وہ لذت ہے نہ انتہائی گرمی کے وقت ریفریجریٹر اور ایرکنڈیشنڈ میں وہ لذت ہے غرض دنیا کی کسی چیز میںوہ لذت نہیں جو اللہ تعالیٰ سے زندہ تعلق رکھنے سے انسان حاصل کرتا ہے۔
    پس اللہ تعالیٰ انہیں بھی توفیق دے کہ وہ اللہ تعالیٰ سے زندہ تعلق رکھنے والے بن جائیں اور اس مہدی معہود کو پہچاننے لگیں جو حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا (جب کہ میں نے ابھی بتایا ہے) محبوب ترین روحانی فرزند تھا ویسا پیار آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے کسی سے نہیں کیا اگر کیا ہوتا تو اسے اپنا سلام بھی بھجواتے۔ اللہ تعالیٰ کرے کہ انہیں یہ بات سمجھ آجائے۔ ہمارے لئے ابتلاء مقدر ہیںکیونکہ اللہ تعالیٰ نے ہمارا امتحان لیناہے لیکن ہم میں سے جو پاس ہوجائے جنہیں اللہ تعالیٰ یہ سمجھے کہ یہ امتحان میں پورے اترے ہیں اور خدا کرے کہ ہم سارے ہی اس امتحان میں پورے اتریں ان کے لئے جو بشارتیں دی گئی ہیں ان کے لئے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے الہامات میں جو محبت کا پیغام دیا گیا ہے ان کے ساتھ اللہ تعالیٰ کا جوسلوک ہے اس اجتماعی حیاتِ احمدیت سے اللہ تعالیٰ جو پیارکررہا ہے جو اجتماعی معجزے دکھا رہا ہے جو دنیا کے دلوں میں ایک انقلاب عظیم پیدا کررہا ہے دنیا کے دل میں جو یہ ایک احساس پیدا کررہا ہے کہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان اور اللہ تعالیٰ کی صفات کا ہمیں احمدیت کی وجہ سے پتہ لگا ہے اس واسطے ایک طرف حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا عشق اور اللہ تعالیٰ کی محبت کا سمندر ان کے دلوںمیں موجزن ہوا تو دوسری طرف وہ ہمارے ساتھ پیارکرنے لگ گئے کیونکہ انہوںنے یہ سمجھا کہ کتنا بڑا احسان ہے اس چھوٹی سی غریب جماعت کا کہ وطنوں سے بے وطن ہوکر اوراپنے پیٹوں پر پتھر باندھ کر انہوںنے ہماری خاطر یہ قربانی دی کہ ہمیں آج وہ حسین چہرہ جس سے بڑھکر کوئی حُسن نہیں وہ حسین چہرہ جو خود منبع اورسرچشمہ ہے تمام حسنوں کا اس کے ساتھ متعارف کروایا اس کی معرفت ہمیں حاصل ہوگئی اسلئے وہ ہم سے پیار کرتے ہیں اور ہم ان سے پیار کرتے ہیں کیونکہ ہم دونوں ایک ہی کشتی میں ہیں یعنی نوح کی کشتی جسکے متعلق سلامتی کا وعدہ ہے۔
    پس ابتلاء تو آئیں گے لوگ کافر کہنے سے باز نہیں آئیں گے جب تک کہ وہ آخری وعدہ پورا نہ ہوجائے جو ہمیں افق پر نظر آرہا ہے اور عنقریب پورا ہونے والا ہے۔بیس۔ تیس یا پچاس سال دنیا کی زندگی میںیہ کوئی زمانہ نہیں لیکن یہ کوئی لمبا عرصہ نہیں ہے۔ اب میری تو رائے یہ ہے کہ شاید اس کے آثار بیس اورتیس سال کے اندر شروع ہوجائیں گے گو اس کا کلائمیکس ممکن ہے صدی کے اندر کسی وقت ہو لیکن نمایاں طورپر ایک بات سامنے آجائے گی کہ احمدیت جیت چکی ہے اور اس کی مخالفت ناکام ہوچکی ہے۔بہرحال غیب کا علم تو اللہ تعالیٰ جانتا ہے ہم تو جو سمجھتے ہیں وہ نیک نیتی سے بیان کردیتے ہیں تاکہ آپ بھی دعا کریں اور سارے مل کر یہ دعا کریں کہ جو ہمارے اندازے ہیں وہی صحیح نکلیں جلد تر ساری دنیا حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے قدموں میں آکر جمع ہوجائے اور اپنے رب کے حضور اسلام(لفظ اسلام اور معنی اسلام) جو قربانی چاہتا ہے اسکو ہمیں پیش کرنا چاہئے ہماری یہ دعا اوریہ تمنا ہے۔
    غرض کسی سے بگاڑ نہیںنہ کسی سے نفرت اوردشمنی ہے اپنے آپ کو ہم کچھ سمجھتے نہیں نہ کبر نہ غرور نہ بڑائی اور نہ فخر ہے لاشے محض خود کو سمجھتے ہیں اورسوائے اللہ کے ہر دوسری ہستی کو لاشے محض سمجھتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کی بشارتوں پر پورا یقین رکھتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کے وعدے ہمیں تسلی اور تسکین دلاتے ہیںکہ آخر اسلام اور احمدیت کا غلبہ ہوگا۔ خدا تعالیٰ نے ہمارے لئے سلامتی کا سامان پیداکیا ہے آگیں ہمارے لئے جلائی جائیں گی مگر ہمیں بھسم کرنے اور راکھ کرنے کے لئے نہیں بلکہ اس لئے کہ اللہ تعالیٰ اپنے معجزانہ ہاتھ دکھا کر دنیا پر یہ ثابت کرے کہ دنیا کی کوئی طاقت ان کو ناکام نہیں کرسکتی دنیا کی کوئی آگ انہیں جلا نہیں سکتی۔ دنیا کا کوئی منصوبہ انہیں منتشر نہیں کرسکتا۔
    جونئی پریشانی پیدا ہوئی ہے نوجوانوں کے دماغوں میں ہے پریشانی ہمارے لئے تو وہ کوئی پریشانی نہیں اسی کے سلسلہ میں دراصل میرا یہ خطبہ ہے اس سے پہلی رات مجھے ابھی پتہ نہیں تھا۔ اللہ تعالیٰ نے ایسا تصرف کیاکہ ساری رات مخالفین کی ناکامیوں اور جماعت کی کامیابیوں کے متعلق باتیں ہوتی رہیں۔ کبھی قرآن کریم کی آیات، کبھی اپنے فقرے اور بس نیم بیداری اور نیم غنودگی کی حالت میں قریباً ساری رات یہی کیفیت رہی میں صبح اٹھکر بڑا خوش ہوا لیکن مجھے کچھ فکر بھی تھی کہ جب بہت تسلی دی جاتی ہے تو کہیں سے کوئی وار بھی ہونے والا ہوتا ہے چنانچہ بعد میں پتہ لگ گیا کہ یہ ایک وار ہوا ہے۔
    ایک چیز میں بھول گیا اس کا مجھے افسوس ہے خواب میں میں انگریزی میں تین فقرے کہتا ہوں تین مختلف انبیاء کی قوموں کے متعلق غالباً شرعی نبی جو پہلے گزرے ہیں۔حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی دوشاخیں ہیں پہلی زندگی میں آپؐ دنیا پر محمدؐ کی شان میں جلوہ گر ہوئے تھے اور اس زمانہ میں آپ اپنی احمد کی شان میں جلوہ گر ہوئے ہیں۔ ہوسکتا ہے بلکہ میرا خیال بھی یہی ہے کہ یہ دوشاخیں اور ایک پہلے کے کسی نبی کی شان اور فقرے وہ ایسے ہیں کہ سوچ کر مجھے بڑا ہی افسوس ہوا وہ بڑے عجیب یعنی وہ فقرے ایسے نہیں کہ انسان بناسکے بلکہ ایسے تھے کہ جس طرح آسمان سے نازل ہوئے ہیں اوران سے میں نے بڑی لذت محسوس کی لیکن وہ میری زبان پر جاری ہوتے ہیں اور آخری فقرے کا صرف ایک لفظ یادرہ گیا اوراس میں یہ فقرہ کہتا ہوں کہ جماعت احمدیہ کی خصوصیات اور جماعت احمدیہ کی کامیابیوں کا راز اس بات میں ہے پھروہPhrese(فریز) لمبی تھی مگر اس میں صرفDecepline(ڈسپلن) کالفظ یاد رہ گیا یعنی نظم واطاعت اور یہ حقیقت ہے ہمیں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ یہ خوشخبری ملی ہے کہ دامن خلافت کو مضبوطی سے پکڑے رکھنا اللہ تعالیٰ تم پر رحم کرتا چلا جائے گا اور اپنے فضل تم پر نازل کرتا چلا جائے گا مثلاً خلافت کی جو قدر پہلے صحابہؓ نے کی وہی قدر جماعت کو کرنی چاہئے۔ جب حضرت خالدؓ بن ولید کو معزول کیا گیا تو حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے ہاتھ میں وہی کوڑا تھا جو خلافت کے ہاتھ میں ہوتا ہے۔ کسی کو زیادہ استعمال کی ضرورت پڑجاتی ہے کسی کو کم پڑتی ہے۔ کسی کا وہ کوڑا نمایاں ہوکر سامنے آجاتا ہے کسی کا کبھی کبھی سامنے آتا ہے اسلئے لوگ اسے بھول جاتے ہیںخلافت خلافت میںتوکوئی فرق نہیں۔ہر خلیفہ کے فرائض واختیارات ایک جیسے ہیں۔ کوڑا بھی ایک جیسا ہے کیونکہ اگر وہ کوڑا خلافت عمر کا حصہ نہیں تھا تو وہ ناجائز تھااور ان کی طرف ہم کوئی ناجائز بات منسوب نہیں کرتے اگر وہ جائز تھا تو خلافت کاحصہ تھا اور ہرخلافت کاوہ حصہ ہے چنانچہ وہ کوڑا حضرت خالدؓ بن ولید پر چلا۔ یہ تو ایک ضمنی بات ہے لیکن جو لوگ بعد میں آئے اور جن کی حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے ایک آدھ ملاقات ہوئی تھی یعنی اگر صحابی بھی تھے تو اس قسم کے تھے کہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے زمانے میں ایمان لائے تھے مگر بڑے مخلص اور فدائی بن گئے انہوںنے جب حضرت خالد ؓ کی معزولی کا سنا تو بڑے پریشان ہوئے کہ یہ کیا ہوگیا؟ اتنا بڑا جرنیل جس نے اتنی بڑی قربانیاں دیں اوراللہ تعالیٰ نے اس کے ہاتھ پر اتنی فتوحات بخشیں اور ایک فقرہ لکھا ہوا نکلا کہ ان کو معزول کردو۔ انہوںنے اسے قبول نہیں کیا اگرچہ بغاوت نہیںکی لیکن طبیعتوں میں بشاشت نہیں پیدا ہوئی چنانچہ اکابر صحابہؓ کے پاس ان لوگوں کا ایک وفد گیا کہ ہمیں خلافت کی یہ بات پسند نہیںآئی اورہم کچھ کہہ نہیں سکتے اورآپ صحابہ میں سے بزرگ ہیں آپ حضرت عمرؓ کو توجہ دلائیں کہ یہ کیا کردیا ہے؟ انہوںنے آگے سے جواب دیا کہ سمجھ آنے یا نہ آنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ ہماری ریت یہ ہے کہ سَمْعاً وَّ طَاعَۃً۔ ہم صرف سنیںگے اور اطاعت کریں گے بشاشت تو تمہارے دل کے اندر پیدا ہونی چاہئے ان نا سمجھوں کے دل میں بشاشت پیدا نہیںہوئی لیکن خود حضرت خالدؓ بن ولید نے اپنی وفات سے پہلے کئی باراس بات کا اظہار کیا کہ مجھے سمجھ آگئی ہے کہ میرے معزول کرنے میں کیا حکمت تھی؟ وہ حکمت یہی تھی کہ یہ جونئے آنے والے تھے ان کے دلوں میں احساس پیدا ہوگیا تھا کہ یہ فتوحات حضرت خالدؓ کی مرہون منت ہیں اور حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ آپ کو یہ بتلانا چاہتے تھے کہ یہ فتوحات صرف اللہ تعالیٰ کے فضل اور اس کی رحمت کی مرہون منت ہیں خالد کوئی چیز نہیں بلکہ ہر انسان کی عمر کی بھی اور خالد کی بھی اور ناصر کی بھی۔ غرض جو بھی مخلوق ہے اس کی اللہ تعالیٰ کے مقابلے میں ایک مرے ہوئے کیڑے سے زیادہ حیثیت نہیں ہے۔ حضرت عمرؓ ان کو یہ سبق سکھانا چاہتے تھے اورخوب سکھایا حضرت ابوبکر صدیقؓ نے حضرت خالدؓ کو ایران کی جنگوں پر مامور کر رکھا تھا لیکن حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے انہیں وہاں سے ہٹالیا اورپھر انہیں وہاں واپس نہیں بھیجا اور آپکی جگہ ایک بوڑھے متقی اورپرہیز گار یعنی حضرت سعد بن وقاص رضی اللہ عنہ جن سے بعض دفعہ لڑائی میں چلا بھی نہیں جاتاتھا مگر یہ بڑے پایہ کے صحابی تھے بڑے مخلص اور دعاگو تھے بنی نوع انسان سے بڑا پیار کرنے والے تھے انہیں جرنیل بنادیا۔ حضرت خالدؓ بن ولید کی لڑائیوں کے متعلق تویہ کہا جاسکتا ہے کہ انہوں نے تھوڑا Bleeding(بلیڈنگ) کیا یعنی ایرانی حکومت کو تھوڑا سا زخمی کیا۔ اس میں ذرا سا ضعف آگیا لیکن حضرت سعدؓ بن وقاص نے اپنے کمزور ہاتھ کی تلوارسے ایران کی گردن اُڑا دی کیونکہ ان کا ہاتھ ظاہری طورپر کمزور تھا یا طاقتور تھا اس کا کوئی سوال ہی نہیں تھا اصل ہاتھ تواللہ تعالیٰ کا تھا جس نے وہ تلوار پکڑی ہوئی تھی اورجب اللہ تعالیٰ کا ہاتھ تلوار اُٹھا ئے تو اس سے کون سی گردن محفوظ رہ سکتی ہے؟ کوئی نہیں رہ سکتی اگر یہ صحیح ہے کہ اِنَّ الَََّذِیْنَ یُبَایِعُوْنَکَ اِنََّمَا یُبَایِعُوْنَ اللّٰہَ یَدُ اللّٰہِ فَوْقَ اَیْدِیْھِمْ۔(الفتح:۱۱)یعنی جنہوں نے تیرے ہاتھ میں ہاتھ دیکر بیعت کی تیرے ہاتھ میں اُنہوں نے ہاتھ نہیں دیا خداکے ہاتھ میں ہاتھ دیا تو پھر یہ بھی ماننا پڑے گا کہ اسلام کی تلوار حضرت خالدؓ بن ولید کے ہاتھ میںنہیں تھی نہ حضرت سعدؓ بن وقاص کے ہاتھ میںتھی بلکہ وہ تلوار خدا تعالیٰ کے ہاتھ میں تھی اور خدا کے ہاتھ میں جو تلوار ہوتی ہے اگر وہ چمکے اور کسی کی گردن اُڑانا چاہے تو کس کی گردن محفوظ رہ سکتی ہے؟
    ضمناً مجھے ایک اور بات یاد آگئی ہے ۔ ایک صحابی لڑرہے تھے دشمن بڑاطاقتور اور زِرہ پوش تھا یہ اس پر وارکرتے تھے مگر وار کامیاب نہیں ہوتا تھا۔ اس عرصہ میںایک اور دشمن نے ان پرپیچھے سے حملہ کیااور جو ان کے سامنے سے لڑرہا تھا اسے نظر آرہا تھا کہ پیچھے سے اور حملہ ہوگیا ہے اسلئے میری جان بچ جائے گی۔ ہمارے اس صحابیؓ کو تو نظر نہیں آرہا تھا ان کی تو اس طرف پیٹھ تھی لیکن انہوں نے سامنے دشمن پرتلوار چلانے کے لئے جب تلوار گھمائی اور اس کی نوک پیچھے آنے والے آدمی کی گردن پرلگی وہ دور جاپڑا اس سے پتہ لگتا ہے کہ مسلمانوں کی تلواریں خدا کے ہاتھ میں تھیںاس کی آنکھ سے تو کوئی چیز پوشیدہ نہیں غرض وہ صحابیؓ دم بخود ہوگئے حیران کہ یہ کیا واقعہ ہوگیا ان کوتو پتہ ہی نہیں تھا کہ پیچھے کون آرہا ہے اور وہ اس کا بچائو نہیں کرسکتے تھے ان کو علم ہی نہیںتھا کہ پیچھے سے بھی نیزے اور تلوار کا وارہوگا چنانچہ ہوا یہ کہ جوچیز ان کو نظر نہیں آرہی تھی یا جوانسان ان کے پیچھے سے حملہ کرنے والا تھا اس کی گردن اڑگئی اور پھر وہ بھی ماراگیا۔بظاہر یہ چھوٹی چھوٹی باتیں ہیںلیکن یہ ہمیں بتارہی ہیں کہ وہ تلوار مسلمان کے ہاتھ میں نہیں تھی بلکہ مسلمان کے ربّ کریم کے ہاتھ میں تھی اس ربّ کے ہاتھ میں تھی جسکے متعلق ہم ایمان لاتے ہیں کہ اَلْمُلْکُ لِلّٰہِ، اَلْقُدْرَۃُ لِلّٰہِ اور اَلْعِزَّۃُ لِلّٰہِ جو متصرف بالارادہ ہے دنیا میں کوئی کام نہیں ہوسکتا جب تک آسمان سے حکم نازل نہ ہو۔
    پس یہ کمزوریاں تھنکنگ(Thinking) کی، فکر وتدبر کی یہ بھی چھوڑو جو اللہ تعالیٰ چاہتا ہے صرف وہی ہوتا ہے اورآج اللہ تعالیٰ نے یہ چاہا ہے کہ اسلام اور احمدیت غالب آئے اورانشاء اللہ اسلام اور احمدیت غالب آئے گی۔ میں جب بھی سوچتا ہوں مجھے مخالفین کے منصوبوں سے کبھی فکر پیدا نہیں ہوئی۔ میں ایک لحظہ کے لئے بھی پریشان نہیںہوا لیکن جوچیز مجھے پریشان کردیتی ہے اوربعض دفعہ میری راتوں کی نیند حرام کردیتی ہے وہ جماعت کی اپنی کمزوری ہے۔آپ یاد رکھیں کہ آپ کا بیرونی دشمن آپ کو کبھی کوئی نقصان نہیںپہنچا سکے گا البتہ آپ کے دل کا چورآپ کو نقصان پہنچا سکتا ہے آپ کے دل کا نفاق آپ کو نقصان پہنچا سکتا ہے آپ میں دلی طور پر کمزور ایمان والا آپ کو نقصان پہنچا سکتا ہے لیکن بیرونی مخالفت آپ کو کوئی نقصان نہیں پہنچا سکتی اس کی فکر کرنی چاہئے۔
    پس آپ اپنی تربیت کی فکر کریں اور ان لوگوں کے لئے دعائیں کریں کسی پرغصہ نہ کریں، کسی سے تمسخر نہ کریں اپنے آپ کو کچھ نہ سمجھیں اپنے دل میں ان لوگوں کے لئے ’’بخع‘‘کی کیفیت پیدا کریں۔ ان سے نفرت کی بجائے پیار پیدا کریں، بددعا کرنے کی بجائے ان لوگوں کو دُعائیں دیں اللہ تعالیٰ ایک دن یہ دعائیں قبول کرے گایہ اس کا وعدہ ہے پھر ہمارے مونہوں سے بھی انشاء اللہ وہ یہ کہلوائے گا۔ لَاتَثْرِیْبَ عَلَیْکُمُ الْیَوْمَ۔ تمہیں نورنظر آگیا اسلئے آج تمہارے ساتھ سارے جھگڑے ختم ہوگئے۔ ہم کسی انسان کے دشمن نہیںلیکن اس دنیا میں ظلمت کو ہم برداشت نہیں کرسکتے اور نہ ہی یہ اس دنیا میںرہے گی اسی کے لئے ہماری زندگی اور اسی کے لئے ہماری موت ہے۔ بالآخر میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ایک اقتباس کو پڑھ کر اس خطبہ کو ختم کرتا ہوں۔ آپؑ فرماتے ہیں
    ’’یہ مت خیال کرو کہ خدا تمہیں ضائع کردے گا۔ تم خدا کے ہاتھ کاایک بیج ہو جو زمین میں بویا گیا خدا فرماتا ہے کہ یہ بیج بڑھے گا اور پھولے گا اورہر ایک طرف سے اس کی شاخیںنکلیں گی اور ایک بڑا درخت ہوجائے گا(اس کاایک نظارہ تو ہم دیکھ کر آئے ہیں۔ دنیا کے ملک ملک میںاس درخت کی شاخیں ہیں جن کے اوپر احمدیت کے پرندے اور اللہ تعالیٰ کی جنت کے پرندے بسیرا کررہے ہیں) پس مبارک وہ جو خدا کی بات پر ایمان رکھے اور درمیان میں آنے والے ابتلائوں سے نہ ڈرے کیونکہ ابتلائوں کا آنا بھی ضروری ہے۔ تا خدا تمہاری آزمائش کرے کہ کون اپنے دعویٰ بیعت میں صادق اور کون کاذب ہے۔ وہ جوکسی ابتلاء سے لغزش کھائے گا وہ کچھ بھی خدا کا نقصان نہیں کرے گا اور بدبختی اس کو جہنم تک پہنچائے گی اگروہ پیدانہ ہوتا تو اس کے لئے اچھا تھا مگر وہ سب لوگ جو اخیر تک صبرکریں گے اور ان پر مصائب کے زلزلے آئیں گے اور حوادث کی آندھیاں چلیں گی اور قومیں ہنسی اور ٹھٹھا کریں گی اور دنیا ان سے سخت کراہت کے ساتھ پیش آئے گی۔وہ آخر فتحیاب ہونگے اوربرکتوں کے دروازے ان پر کھولے جائیںگے۔انشاء اللہ تعالیٰ‘‘
    ( الوصیت، روحانی خزائن جلد نمبر ۲۰ صفحہ ۳۰۹)
    پس تم یہ دعا کرتے رہو کہ اللہ تعالیٰ تمہیں اس گروہ میں شامل کرے جن کے پائوں میں کبھی لغزش نہیں آتی جو پختگی کے ساتھ اور ثبات قدم کے ساتھ اس بزرگ شاہراہ پر قدم بقدم اپنی منزل مقصود کی طرف چل رہے ہیں اور ہر قدم پہلے سے زیادہ تیز اورہرصبح پہلے سے زیادہ شاندار اور ہر طلوع آفتاب احمدی قوم کو پہلے دن کے طلوع کے وقت ان پر جو نظر اس کی پڑی تھی اس سے زیادہ طاقتور اور اس سے زیادہ باعزت اور اس سے زیادہ بارعب اور اس سے زیادہ پیار کرنے والے دیکھتا ہے۔ خدا کرے کہ ہرسورج پہلے سے زیادہ طاقتور اور زیادہ معززاور اللہ کی نگاہ میں زیادہ کامیابی کے قریب احمدیت کو دیکھتا چلا جائے یہاںتک کہ تمام دنیا حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے جھنڈے تلے جمع ہوجائے اور قرآن کریم کی وہ پیشگوئی اورحضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کا وہ الہام پورا ہو کہ اقوام عالم ایک برادری بن جائیںگی اور ان تمام کا ایک ہی مذہب ہو گا اسلام اور ایک ہی کتاب قرآن اور ایک ہی پیشوا محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہونگے خدا کرے کہ ایسا ہی ہو۔ آمین۔
    (از رجسٹر خطباتِ ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز




    احمدیت کو غالب کرنے کا فیصلہ
    آسمانوں پر ہو چکا ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲۸؍اگست ۱۹۷۰ء بمقام مسجد مبارک ربوہ ۔غیر مطبوعہ)
    تشہّد وتعوذ اور سورۂ فاتحہ کی تلاوت کے بعدحضور انور نے فرمایا:-
    یُؤْمِنُوْنَ بِالْغَیْبِ(البقرہ:۴) اپنے ایمانوں کو پختہ کرو ایمانوں کو پختہ کروکہ اس کے بغیر تم اورمیں ان بشارتوں کے وارث نہیں بن سکتے جو اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ ہمیں دی ہیں۔
    اس موضوع پر میں پہلے بھی ۲یا۳خطبات میں ایمان کے مختلف پہلو بیان کرچکا ہوں میں نے بتایا تھا کہ ایمان کالفظ قران کریم میں دومعنوں میں استعمال ہو تاہے ایک تو اس معنے میں کہ لفظ ایمان استعمال کیا جاتا ہے اور یہ نہیںبتایا جاتا کہ کس چیز پر ایمان؟ اوراس سے مراد یہ ہوتی ہے کہ ایمان کے جس قدر تقاضے قرآن کریم میںاور ان کی جس قدر تفاسیر حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم یاآپ کے عظیم روحانی فرزند حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے بیان کی ہیں ان تمام تقاضوں کو پورا کرو۔ کبھی قرآن کریم نے ایمان کے ساتھ ان تقاضوں کا بھی ذکر فرمایا ہے مثلاً قرآن کریم فرماتا ہے اللہ تعالیٰ پر ایمان لائو، قرآن کریم فرماتا ہے کہ اللہ کے رُسل پرایمان لائو قرآن کریم فرماتا ہے کہ جو پہلی کتب بھجوائی جاچکی ہیں ان پر ایمان لائو اللہ تعالیٰ فرماتاہے کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر ایمان لائو۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر جو کامل کتاب قرآن کریم کی صورت میں نازل ہوئی ہے اس پرایمان لائو۔ بعض جگہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ یوم آخرت پر ایمان لائو، آخرت پر ایمان لائو، غیب پر ایمان لائو۔ غرض بہت سی جگہوں پر ایمان کے تقاضوں کوساتھ ہی بیان کردیا گیا ہے اور بعض جگہ صرف ایمان یا اس کے مشتقات میں سے کوئی مشتق استعمال ہوتا ہے اور مراد یہ ہوتی ہے کہ تمام تقاضوں کو پورا کرو مثلاً اللہ تعالیٰ نے ایک جگہ فرمایا ہے اَنْتُمُ الْاَعْلَوْنَ (اٰل عمران:۱۴۰)کوئی طاقت تم پر غالب نہیں آسکتی تم ہی دنیا کی سب طاقتوں پر غالب آئو گے۔ اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ۔(اٰل عمران:۱۴۰) اگرتم حقیقی معنے میںمومن ہوگے۔ایمان کے تمام تقاضوں کوپورا کرنے والے ہوگے۔ یہاں یہ نہیں فرمایا کہ مومن باللہ یا مؤمن بالغیب یا مؤمن بالرُسل وغیرہ وغیرہ مختلف تقاضے ہیں محض مؤمن کا لفظ استعمال کیا ہے۔
    ایمان باللہ کے متعلق قرآن کریم نے بڑ ی تفصیل سے روشنی ڈالی ہے اور حقیقت یہ ہے کہ جو اللہ تعالیٰ کی توفیق سے اس کی معرفت پالیتا ہے وہی حقیقی معنے میں مسلم کہلاسکتاہے اور وہی تمام بشارتوں کا وارث بنتا ہے۔
    اس ایمان باللہ کی دراصل آگے مختلف شاخیںہیں۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں اپنے وجود کو اللہ کی شکل میں جن صفات کے ساتھ بیان فرمایا ہے اور اپنے آپ کو جن کمیوں اور عیبوں اور نقائص اور عیوب سے منّزہ ہونے کی صورت میں پیش کیاہے اسکو سمجھنا اور سوائے اللہ تعالیٰ کے کسی اور کو دنیا کا پیدا کرنے والا اور دنیا کو زندگی دینے والا اوردنیا کو زندہ رکھنے والا اور دنیا کو سنبھالنے والا اوردنیا کے دکھ دورکرنے والا وغیرہ وغیرہ نہ سمجھنا، یہ ایمان باللہ کی ساری تفاصیل ہیں۔ اس شکل میں ایمان لانا یہی دراصل اسلام کی جان اور ہماری زندگیوں کی روح ہے اس معرفت کے بغیر دراصل زندگی زندگی نہیں۔
    بہرحال کچھ مختصرروشنی میں نے پچھلے خطبے میں ڈالی تھی آج میں ایمان بالغیب کے متعلق یا یوں کہو کہ میں ایمان بالغیب کے ایک پہلو کے متعلق کچھ کہنا چاہتا ہوں قرآن کریم میں بڑی تاکید سے فرمایا گیا ہے کہ غیب پر ایمان لائو۔ غیب اپنے معنی کی وسعت کے لحاظ سے اسکیapplication(ایپلیکیشن) یعنی جہاں جہاں اس کا استعمال کیاجاسکتا ہے اس کے لحاظ سے بڑا وسیع ہے اور نسبتی بھی ہے فرد فرد کے لئے اور ایک عام انسان کے لئے بھی ہے ہر انسان کے متعلق کہا جاسکتا ہے کہ وہ مستقبل کا علم نہیں رکھتا۔ پس وہ مستقبل بنی نوع انسان کے لئے غیب ہے یعنی جو بھی مستقبل ہے وہ غیب ہے ماضی کے دھندلکے بڑھتے بڑھتے بعض دفعہ اس قسم کا اندھیرا پیدا کردیتے ہیں کہ وہ چیز غیب بن جاتی ہے مثلاً حضرت آدم علیہ السلام کے حالات، اُن کا زمانہ، ان کی مشکلات، ان کی تکالیف، ان کی کوششیں اور جدوجہد اور ان کی کوششوں پر جو ثواب مترتب ہوئے ان کی تفصیل ہے لیکن ہمیں ان کا علم نہیں البتہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہیکَتَبَ اللّٰہُ لَاَغْلِبَنَّ اَنَا وَرُسُلِیْ(المجادلۃ:۲۲)میرے رسول ہمیشہ غالب آتے ہیں۔ حضرت آدم علیہ السلام کو خواہ کسی قسم کی مشکلات سے واسطہ پڑا ہو آپ غالب ضرورآئے لیکن کیسے غالب آئے یہ ہمارے لئے غیب ہے اللہ تعالیٰ نے انہیں کامیاب کرنے کے لئے کیاسامان پیدا کئے؟ انہیں کس طرح اپنی بعض نعمتوں اور اپنے پیار سے نوازا اس کے متعلق تفصیل کا ہمیں علم نہیں ہے لیکن ہم کہہ سکتے ہیں کہ حضرت آدم علیہ السلام غالب آئے۔کہتے ہیں ایک لاکھ چوبیس ہزار پیغمبر ہوئے ہیں اور ان میںسے چند ایک کے علاوہ باقی کے تو ہمیں نام کابھی پتہ نہیں البتہ ہمیں اتنا پتہ ہے کہ اِنْ مِّنْ اُمَّۃٍ اِلاَّ خَلَا فِیْھَا نَذِیْرٌ(فاطر:۲۵)مگر اس کا بڑاحصہ ماضی سے تعلق رکھتا ہے آئندہ کے متعلق کچھ کہہ نہیں سکتے یعنی دنیا میں اورجگہ بھی آبادیاں ہیں وہاں کیا ہورہا ہے اورکیا ہونے والا ہے؟ اس کا کسی کوپتہ نہیں ہے لیکن یہ یقینی بات ہے کہ ہرامّت میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے ایک ڈرانے والا مبعوث ہوا اور اس پر ہم ایمان لاتے ہیں اور اس پر بھی ایمان لاتے ہیں کہ وہی غالب ہوئے کیونکہ اللہ تعالیٰ کے جو وعدہ ان کے لئے غیب تھا یعنی جو بشارتیں ان کو ملی تھیں اور ابھی پوری نہیں ہوئی تھیں یا کامل طور پر ابھی پوری نہیں ہوئی تھیں اس کے اوپر ایمان رکھتے تھے اور جو ایمان رکھتے تھے وہ اللہ تعالیٰ کے فضلوں کے وارث ہوئے۔
    غیب حال کے ساتھ بھی تعلق رکھتا ہے مثلاً امریکہ کی کیا حالت ہے؟ اس وقت روس کی کیا حالت ہے؟ آج ان کے مفکرین دنیا میںتباہی مچانے اوردنیا کی آپس کی حقارتوں کواور بھی زیادہ شدید بنانے کیلئے کیا سوچ رہے ہیں اورکیا کررہے ہیں؟ ہمیں کچھ پتہ نہیں لیکن اللہ تعالیٰ کو پتہ ہے بعض کے متعلق ان کو بھی پتہ نہیں کہ اس کا نتیجہ کیا ہوگا؟ یعنی انسان کی اپنی کوشش کا جو نتیجہ ہے وہ اس کے لئے غیب ہے اور ان اقوام کی جو کوششیں ہیں وہ ہمارے لئے غیب اور ان کوششوں کا نتیجہ ان کے لئے غیب ہے روس سوچ رہا ہے (اگر وہ اپنے دعویٰ میںسچاہے جیسا کہ اس نے اعلان کیا تھا) کہ میں زمین سے اللہ کے نام اور آسمان سے اس کے وجود کو مٹادوںگا لیکن جو غیب کی خبر حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ہمیں دی ہے وہ یہ ہے کہ ’’میں اپنی جماعت کو رشیا کے علاقہ میں ریت کی مانند دیکھتا ہوں‘‘۔(تذکرہ ایڈیشن چہارم ۶۹۱) وہ سوچ کچھ رہے ہونگے اگروہ اپنے دعویٰ میں سچے ہیں اور اللہ تعالیٰ کے علم میںکوئی اور چیز ہے وہ سمجھتے ہونگے کہ ہماری اتنی بڑی طاقت ہے کہ دنیا کی دوبڑی طاقتوں میں ہم شمار ہوتے ہیں۔ سارے منصوبے ضرور کامیاب ہونگے خدا تعالیٰ فرماتا ہے کہ تم جو مرضی سوچتے رہو۔ اپنی جتنی طاقت سمجھو میرے مقابلے میں تمہاری کوئی طاقت نہیں۔ ہوگا وہی جس کا میں ارادہ کرونگا اور جو میں تمہیں غیب کے متعلق بتاتاہوں وہ پوارا ہوگا تمہاری تمام کوششیں ناکام ہوجائیںگی نہ تم آسمان سے خدا کے وجود کو مٹا سکو گے نہ اللہ کے نیک بندوں کے دل سے اس کے نام اور پیار اورمحبت اور عشق کو مٹا سکو گے اوراحمدیت کے ذریعے تمہاری قوم کے دل محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جیتے جائیںگے اور ایک دو کے نہیں جیسا کہ کمیونسٹ ملکوں میں واقع ہوچکا ہے وہاں احمدیہ جماعتیں قائم ہورہی ہیں غرض اتنی کثرت سے جیتے جائیں گے کہ اگر تمہارے ملک کے ریت کے ذروں کوشمارنہیں کیا جاسکتا تواسی طرح احمدی مسلمانوں کو بھی شمار نہیں کیا جاسکے گا جس کامطلب یہ ہے کہ تمہاری بڑی بھاری اکثریت تمہارے دعووں کے ہوتے ہوئے اور تمہاری کوششوں کے باوجود اللہ تعالیٰ کو پہچانے گی اس کی معرفت حاصل کرے گی اور اس کے فضلوں کی وارث بنے گی ہمارے لئے یہ آئندہ کے متعلق غیب ہے اور جس طرح ہمیں یہ یقین ہے کہ اس وقت سورج چمک رہا ہے اور دن ہے جس طرح ماں اور باپ کویہ یقین ہے کہ ان کے ایک دوتین چار یا جتنے بھی خدا نے بچے دئیے ہیں اور زندہ ہیں مرے ہوئے نہیں ہیں جس طرح خاوند کویہ یقین ہے کہ اس کی ایک بیوی بھی ہے اور جس طرح بیوی اس یقین پر قائم ہوتی ہے کہ اس کا ایک خاوند بھی ہے ہرایک احمدی کو اس سے بھی زیادہ یقین پر قائم ہونا چاہئے کہ اللہ تعالیٰ نے ہم سے جو غیب کے متعلق وعدے کئے ہیں وہ انشاء اللہ ضرور پورے ہونگے ساری دنیا کی طاقتیں مل کر بھی اللہ تعالیٰ کے ارادے میں روک نہیں بن سکتیں۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ہمیں صرف یہ نہیں فرمایا کہ اپنے ایمانوں کو پختہ کرو الٰہی بشارتوں کے متعلق یہ یقین رکھو کہ وہ پوری ہونگی کیونکہ آسمان اور زمین کے خدا نے ایسا کرنے کا ارادہ کیا ہے بلکہ آپ کے دل میں الٰہی وعدوں پر بھی نہایت پختہ یقین تھا اور آپ اپنی جماعت میں بھی اسی یقین کو پختہ کرنا چاہتے تھے صرف یہ نہیں کہا کہ دشمن ایذا دہی کرتا ہے گندہ دہنی سے کام لیتا ہے کراہت کی نظر سے دیکھتا ہے ہلاکت کے منصوبے بناتا ہے لیکن کامیاب نہیں ہو گا بلکہ مخالف کو مخاطب کرکے یہ بھی کہا کہ میں تمہیں کہتا ہوں کہ مرے خلاف زور لگائو اور اتنا زور لگائو کہ اس سے زیادہ تمہاری طاقت میںنہ ہواورپھر دیکھو کہ اس کا نتیجہ کیا نکلتا ہے؟ نتیجہ وہی نکلے گاجو میرے خدانے مجھے بتایا ہے وہ نتیجہ نہیں نکلے گا جو تمہارے منصوبے تمہارے دل میں خواہش پیدا کریںگے۔
    پس غیب کا تعلق مستقبل سے بھی ہے اور اس وقت اسی کے متعلق میں کچھ کہنا چاہتا ہوں مستقبل کے متعلق جو غیب ہے وہ پھر ہزاروں شاخوں میں آگے بٹاہوا اور تقسیم ہے لیکن مستقبل کے جس غیب کا جماعت احمدیہ سے تعلق ہے وہ وہ غیب ہے جو بشارتوں کے رنگ میںہمیں دیا گیا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے اسی وعدہ کو دہرایا ہے نئے وعدے نہیں اصل وعدے توآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان سے ہم تک پہنچائے گئے ہیں لیکن نئے حالات میں جن نئی شکلوں میں انہوں نے ظاہر ہونا تھا وہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ ہمیں بتائے گئے ہیں۔
    قرآن کریم میں یہ وعدہ دیا گیا تھا کہ اَنْتُمُ الْاَعْلَوْنَ اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ (اٰل عمران:۱۴۰) ایمان کے تقاضوںکو پورا کروگے غالب آئو گے۔ ایمان کے تقاضوں کو پورا نہیں کروگے ملعونی قومیں بھی تم پر غالب آجایا کریں گی۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو قرآن کریم کا یہی وعدہ دیا گیا ہے لیکن اس بشارت کے ساتھ کہ وہاں جو شرط لگائی تھی یعنی ’’اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ‘‘ کی۔ جماعت احمدیہ کا بڑا حصہ اس شرط کو پورا کرے گا۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو یہ فرمایا گیا کہ شرط نہیںمیںتمہیں بشارت دیتا ہوں کہ تمہاری جماعت ایمان کے تقاضوں کو پورا رکرے گی اورمیری بشارتوں کی وارث ہوگی۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰہ والسلام کو اللہ تعالیٰ نے یہ فرمایا اَللّٰہُ یُعْلِیْنَا وَلَا نُعْلٰی اللہ ہم کو غالب کرے گااور ہم پر کوئی غالب نہیں آئے گا قرآن کریم کی شرط تو نہیں مٹائی جاسکتی۔ اسی کی طرف اشارہ ہے ۔ حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں تو اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ کی شرط پوری ہورہی تھی مگرپھر ایک وقت ایسا آیا کہ مسلمانوں نے اس شرط کو پورا نہیں کیا اور وہ بشارتوں کے وارث نہیں بنے۔
    اللہ تعالیٰ نے اس الہام میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰہ والسلام کو بتایا کہ تمہیں جو جماعت دی جارہی ہے وہ اس شرط کو پورا کرنے والی ہے اس واسطے یہ اعلان کردو کہ اَللّٰہُ یُعْلِیْنَا ولا نُعْلٰی۔ اللہ تعالیٰ ہمیں غالب کرے گا اور دنیا کی کوئی طاقت ہم پر غالب نہیںآسکے گی۔ خد اکے فضل اور اس کے رحم کے ساتھ یعنی جماعت احمدیہ کی اکثریت ویسے الٰہی سلسلوں میں کمزور ایمان والے بھی ہوتے ہیں اور منافق بھی ہوتے ہیں لیکن جماعت احمدیہ کی اکثریت اس شرط کوپورا کرنے والی ہوگی اوردنیا میں یہ اعلان کرنے والی ہوگی۔’’اَللّٰہُ یُعْلِیْنَا وَلَا نُعْلٰی‘‘ اللہ تعالیٰ ہمیں غالب کرے گا اور ہم پرکوئی غالب نہیں آئے گا۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے جماعت کواس قدر بشارتیں دی ہیں آپ نے جماعت کی ترقیات کا اس دھڑلے کے ساتھ اعلان کیا ہے آپ نے ان منافقوں اور کمزور ایمان والوں کو بھی ڈرایا ہے لیکن بحیثیت جماعت کے آپ نے جماعت کویہ تسلی بھی دی ہے کہ عاجزانہ راہوں کو تم اختیار کرتے جانا اللہ تعالیٰ کے فضلوں کے تم وارث ہوتے چلے جائو گے اللہ تعالیٰ نے آپ کو خبر دی ہے کہ آپ اور آپ کے نائبین اور خلفاء جماعت کی اس رنگ میں تربیت کرنے کے قابل ہونگے کہ جماعت کے لوگ اللہ تعالیٰ کی قائم کردہ شرط کوپورا کریں گے اوراللہ تعالیٰ کے فضلوں کے وارث بنیں گے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو بڑے ابتدائی زمانہ میں سے بشارتیں ملی تھیں آپ فرماتے ہیں کہ جب میں اکیلا تھا اور کوئی شخص میرے سلسلہ بیعت میں ابھی داخل نہیں ہوا تھا گو یہ صحیح ہے کہ میرے ساتھ چنددوست تھے لیکن بیعت ابھی کسی نے نہیں کی تھی اس وقت خدا تعالیٰ نے مجھے کہا تھا میں تجھے کامیاب کروں گا اور دشمن تیرے اوپرغالب نہیں آسکے گا اور اس وقت جب میرے ساتھ کوئی نہیں تھا اور بڑے بڑے علماء ظاہرنے اکٹھے ہوکر سر جوڑا اور ہلاکت کا ایک یہ منصوبہ بھی تیار کیا کہ دوسو چوٹی کے علماء ظاہر کے دستخطوں سے آپ پر کفر کا فتویٰ لگایااور اس تکفیر بازی کے نعروں میںپہلے احمدی نے بیعت کی۔ آپؑ فرماتے ہیں کہ جب میرے خلاف یہ شور بلند ہوا اس وقت تک بیعت کسی نے نہیں کی ہوئی تھی پس کفر کا فتویٰ اور تکفیر کا نعرہ پہلے لگا اور وہ پہلا شخص بعد میںہوا جس نے آپ کے ہاتھ میں ہاتھ دیا اوراللہ تعالیٰ کے ہاتھ کے لمس کومحسوس کرتے ہوئے اس کی رحمتوں کے چشموں سے جسمانی اور روحانی سیری حاصل کی۔ آپ فرماتے ہیں کہ اس وقت میرے قتل کرنے کے منصوبے بنائے گئے مجھے ہلاک کرنے کی سکیمیں تیار کی گئیں عوام کومیرے خلاف بھڑکایا گیا اور اعلان کیا گیا کہ جو شخص مجھے قتل کرے گا وہ بڑے ثواب کا مستحق ہوگا وغیرہ غرض سارے جتن کئے ہرقسم کی تدبیر کرنی اورنتیجہ یہ ہوا کہ ان نعروں کے درمیان وہ اکیلا اِک سے ہزار نہیں بلکہ اِک سے کروڑ ہونے تک پہنچ گیا۔
    یہ ہمارا پس منظر ہے نئے نعرے، نئے فتوے، نئے بازارِ تکفیرسجانے سے ہمیں کون ڈراسکتاہے؟ ہم نے اپنے بزرگوں کی زندگیو ں میں اللہ تعالیٰ کی قدرت کے جلووں کو مشاہدہ کیا اور ہم نے اپنی عاجزانہ زندگیوں میںبھی اس کی قدرت کے جلووں کا نظارہ کیا دنیا کی کوئی دھمکی دنیا کا کوئی شور، دنیا کا کوئی منصوبہ،دنیا کی کوئی چالاکی ہمیں مرعوب نہیں کرسکتی۔ اس بات کو ہم تسلیم کرتے ہیں اور اسکے اظہار میں کوئی باک محسوس نہیں کرتے کہ جہاں تک دنیوی سہاروں کا تعلق ہے ہم بے سہارا ہیں اور ہمارے پاس کوئی سہارا نہیںہے لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ ہم اللہ تعالیٰ کے دامن کو پکڑے ہوئے ہیںاوروہی ہمارا سہارا ہے اور اس سے بہتر نہ کوئی سہارا ہے نہ کسی سہارے کی ہمیں ضرورت ہے۔ نِعْمَ الْمَوْلٰی وَنِعْمَ الْوَکِیْل اللہ تعالیٰ ہی ہمارا واحدسہارا ہے۔
    ابھی چند دن ہوئے ایک سیاست دان میرے پاس ایبٹ آباد میںآئے ان کے لیڈر نے اعلان کیا تھا کہ احمدی تو کافر ہیں(گوانہوںنے لفظ کافر تو استعمال نہیںکیا تھا مگر کہا کہ یہ ہماری طرح کے مسلمان نہیں ہیں) یہ نہ کبھی ہماری پارٹی میںداخل ہوئے نہ اس وقت شامل ہیں اور نہ آئندہ ہوسکتے ہیں نہ کبھی شامل ہوئے اور نہ اس وقت ہیں۔ یہ توایک جھوٹ تھا جو اسی وقت ان پھر کھل گیا کیونکہ بعض احمدی دوست جو سیاسی لحاظ سے ان کے ساتھی تھے وہ کھڑے ہوگئے اور اس سے کہا کہ یہ آپ نے کیا کہہ دیا ہم تو۱۹۵۱ء سے آپ کے ساتھ کام کررہے ہیں اور آپ کو پتہ ہے ہم قادیانی ہیں(یہی لفظ اس نے استعمال کیا تھا) چنانچہ وہ بڑاشرمندہ ہوا اور پھر ادھر ادھر کی باتیں کرنے لگ گیا لیکن وہ علیحدہ بات ہے یہ دوست جو مجھ سے ملنے آئے تھے ان سے میں نے کہا کہ تمہارے لیڈر نے کہا ہے کہ کوئی احمدی میری پارٹی کا ممبر نہیں ہے اور تم آگئے ہو میرے پاس ووٹ لینے میں وہ بے غیرت احمدی کہاںسے تلاش کروں گا جو تمہارے اس لیڈر کے اعلان کرنے کے بعد تمہیں آکر ووٹ دے دیںگے اور میں نے اسے بتایا کہ مجھے کسی احمدی کو کہنے کی ضرورت نہیں البتہ اسے یہ پتہ لگنا چاہئے کہ تمہارے لیڈر نے یہ کہا ہے پھر وہ آپ ہی فیصلہ کرلے گا اور اس کا فیصلہ یہی ہو گا کیونکہ کوئی احمدی بے غیرت نہیں ہوتا۔
    میں نے اس سے یہ بھی کہا کہ لوگ سمجھتے ہیں کہ ہم نے احمدیوں کے کافر ہونے کا اعلان کردیا پتہ نہیں احمدیوں کو کیا ہو جائے گا کیونکہ احمدی بے سہارا ہیں ان کے ساتھ جیسا مرضی سلو ک کر لو میں نے کہا یہ درست ہے کہ تم یہ سمجھتے ہو اور ہم بھی یہ سمجھتے ہیں اور اس بات پر پختہ یقین رکھتے ہیں کہ کوئی دنیوی سہارا ہمارے پاس نہیں ہے ہم نے زید یا بکر کا دامن نہیں پکڑا ہوا، ہم نے دولت کو بت نہیں بنایا، نہ کثرت کی ہم پرستش کرتے ہیں، نہ طاقت ہمارے سامنے کسی دیویا شیطان کی شکل میںآتی ہے، ہمارے پاس طاقت نہیں ہے، ہمارے پاس دولت نہیں ہے، ہمارے پاس سیاسی اقتدار نہیں ہے ہمارے پاس کچھ بھی نہیں۔ دنیا دار دنیا کے جن سہاروں کو سہارا سمجھتا ہے ہمارے پاس کوئی بھی ایسا سہارا نہیں یہ ایک حقیقت ہے اس کاہم انکار نہیں کریںگے علی الاعلان اس کا اظہار کریں گے لیکن یہ یادرکھو کہ وہ جو سب سہاروں سے زیادہ افضل اور زیادہ قابل بھروسہ اور جس پر زیادہ تو ّکل کیا جا سکتاہے یعنی اللہ تعالیٰ اس کا سہارا ہمیں حاصل ہے اس واسطے کسی اورسہارے کی ہمیں ضرورت ہی محسوس نہیں ہوتی۔
    چونکہ انسانی زندگی(فرد کی زندگی نہیں میںکہہ رہا) میں بڑوں کے بعد چھوٹے ابھر رہے ہوتے ہیں ان میں اکثر وہ ہوتے ہیں جنہیں اپنی پہلی تاریخ کا علم نہیں ہوتا اس واسطے اگر کوئی ذرا سی بھی آواز بلند ہو تو وہ سمجھتے ہیں کہ یہ محمد حسین بٹالوی اور نذیر حسین دہلوی سے بھی زیادہ بلند آواز ہے حالانکہ اگر آج بھی آپ ان لوگوں کے علماء ظاہر سے جاکر پوچھیں کہ آپ نے ان جیسے عالم پیدا کئے تو اغلباًوہ بھی جن میں تھوڑی بہت دیانتداری ہے وہ کہیںگے کہ نہیں وہ ہم سے زیادہ بڑے عالم تھے۔ پس جو اس زمانے کے تمہارے نزدیک سب سے بڑے عالم تھے ان کے کفر کے فتویٰ نے سوائے اس کے جو عورت کپڑا سی رہی ہواسکے ہاتھ میںکبھی سوئی چبھ جاتی ہے یا مرد اپنے کاغذ کو پِن لگائے تو ذرا چبھ جاتا ہے جسے انگریزی میںپن پرکنگ کہتے ہیں اس سے زیادہ ہمیں کوئی تکلیف یا نقصان نہیں دیا۔
    سُوئی بھی چبھی، پن بھی چُبھا تمہارے شورسے ہمارے دل دکھے ضرور کیونکہ یہ ایک طبعی چیز تھی یہ ایک اورمسئلہ ہے لیکن اس کے ساتھ تعلق رکھتا ہے اسلئے وہ میں بیان کررہا ہوں جب اس قسم کی کوئی گندی گالی دی جاتی ہے اور حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام پر کفر کا فتویٰ لگایا جاتاہے توہمارے جذبات ہیں یہ انسانی فطرت کا ایک حصہ ہیں بڑاسخت دکھ ہوتا ہے بعض دفعہ وہ ناقابل برداشت ہوجاتا ہے لیکن ہم اسے برداشت کرتے ہیں۔
    پس جہاںتک فطرت کا تقاضا ہے فطرت کا تقاضا پورا ہوتا ہے ہمیں بڑا سخت دکھ پہنچتا ہے لیکن جہاںتک اس دکھ اور ایذا دہی کے ردعمل کا تقاضا ہے اس میں ہمیں اللہ تعالیٰ کے حکم کے ماتحت چلنا پڑتا ہے اور ہمیں اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے ذریعہ یہ حکم دیا ہے کہ ’’گالیاں سن کر دعا دو پاکے دکھ آرام دو‘‘ اس واسطے جو کوئی کفر کا فتویٰ لگاتا ہے ہم اس کے لئے اور بھی زیادہ دعائیں شروع کردیتے ہیں، ہمیں جس سے تکلیف پہنچتی ہے ہم اس کے لئے راحت اور مسرت کے لئے دعائیں کرنی شروع کردیتے ہیں مثلاً ایک شخص آج یاآج سے اسّی سال پہلے یا آنے والی کل(یہ توچلے گاسلسلہ) کفرکا فتویٰ دیتا ہے تو اگر آپ سوچیں اور میں نے سوچا ہے اور جو میں بیان کروں گا اسی کو حقیقت پایا۔ آپ بھی سوچیں توآپ کو بھی یہی حقیقت سمجھ آئے گی کہ سب سے سخت سزا جو ہم ایسے کافر کہنے والوں کو دے سکتے ہیں وہ وہ سزا ہے جو ابوجہل کے بیٹے عکرمہ کو ملی تھی۔ آپ ان کے لئے دعاکریں کہ وہ احمدی ہوجائیں جب وہ احمدی ہوجائیںگے تو ان میں سے ہر ایک کا دل ساری عمر کڑھتا رہے گا کہ میں کتنا احمق تھا کہ ایک وقت میں اس قسم کا فتویٰ دے دیا یا کوئی فیصلہ کردیا یا اعلان کردیا۔
    پس وہ آپ کو کافر کہیں آپ دعا کریں کہ اُن میں سے ہرایک مومن ہوجائے۔ حضرت خالدؓ بن ولید نے یرموک کے موقعہ پر عکرمہ اور ان کے ایسے ہی ساتھیوں کو جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف ہمیشہ جنگ کرتے رہے تھے یہ مشورہ دیا تھاکہ تمہارے چہروں پر ایسے داغ ہیں جو انتہائی قربانی کے بغیر دُھل نہیں سکتے آج موقعہ ہے اپنے خونوں سے اپنے چہروں کے داغ دھو ڈالو۔ چنانچہ کہتے ہیں کہ اس قسم کے لوگ جو بعد میں آنے والے تھے اور ساری عمر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے ابتدائی دور کی جنگوں میںآپ کے خلاف لڑتے رہے تھے اس وقت دوسو کے قریب تھے وہ سارے کے سارے دشمن کی فوج میں گھس گئے کیونکہ حضرت خالدؓ بن ولید نے ان سے کہا تھا کہ میں اپنی فوج کو حکم نہیں دونگاتم نمایاںہوجاؤ اور دشمن کی فوج پر حملہ کردو حالانکہ دشمن کی تعداد بعض مورخین کے نزدیک اڑھائی لاکھ تھی یہ دوسو اپنے چہروں کے داغ دھونے کے لئے اس فوج کے اندر گھس گئے اور اپنے وعدے کو سچا ثابت کردکھایا سارے کے سارے شہید ہوگئے ان میں سے صرف ایک زخمی ہونے کی حالت میں واپس آئے اور بعد میں انہی زخموں سے وہ بھی فوت ہوگئے ایسے لوگوں کو جو آج اس قسم کی حرکتیں کررہے ہیںمیں یہ کہوں گا کہ اگر تمہاری قسمت میں نیکی لکھی ہوئی ہے تو تمہیں خدا کی رضا کی جنت کے حصول کے لئے عکرمہ اور اس کے ساتھیوں جیسی قربانی دینی پڑے گی اورہم تمہارے لئے دعا کرتے ہیں ہمارے دل میں کسی کی دشمنی، کسی کی حقارت اور کسی سے نفرت نہیں ہے او رہمیں گالیاں دینے والی دنیا، ہمیں کافر کہنے والی دنیا، ہمیں راندہ درگاہ سمجھنے والی دنیاہماری ہلاکت کے منصوبے بنانے والی دُنیا،ہر قسم کی ایذا پہنچانے کی تیاریاں کرنے والی دنیا کان کھول کر یہ سن لے کہ وہ جو مرضی ہو کر لیں ہمارے دل میں اپنی نفرت اور حقارت پیدا کرنے میں کبھی کامیاب نہیںہونگے اسلئے کہ ہمیں خدا تعالیٰ نے تمام بنی نوع انسان کے دلوں کو محبت اور پیار کے ساتھ حضرت محمدرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جیتنے کے لئے پیدا کیا ہے اور ہمیں یہ وعدہ دیا ہے کہ ہم اپنی اس مہم کو اور اس کوشش اور اس منصوبے میں اسی کے فضل سے نہ اپنی کسی خوبی کے نتیجہ میں کامیاب ہونگے اوردنیا کی کوئی طاقت ہمارے راستے میںروک نہیں بن سکتی یہ وہ پیشگوئیاں ہیں جو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ ہمیں ملیں اور یہ وہ پیش خبریاں اور بشارتیں اور مسرتیں اور خوش خبریاں ہیں جن کے متعلق حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ یہ خدا تعالیٰ کی باتیں ہیں انہیںسنبھال کر رکھو اوراپنے صندوقوں میں بندکرلو کہ خدا کی بات ایک دن پوری ہوکررہے گی اللہ تعالیٰ ہم سے جواپنی محبت اورپیار کا سلوک کرتاہے(میں ان کو کہتا ہوں جو ہمیں کافر سمجھتے ہیں کہ) تم اس کااندازہ بھی نہیں کرسکتے۔
    جس دن یہ ایک نیا واقعہ ہوا او راسکے بعد میرے پاس بیسیوں خطوط آئے اور اسی کے متعلق میں اپنے نوجوانوں کو سمجھانے کے لئے آج میں اس موضوع پر بول رہاہوں اور اس سے پہلے بھی بولتا رہا ہوںکہ تمہیں کس بات کی فکر ہے؟ تم خدا کی گود میں بیٹھے ہوئے ہو۔ جس دن یہ واقعہ ہوا ہے(یعنی اخبار میں آیا ہے واقعہ توپہلے ہوا ہوگا)مجھے کچھ پتہ نہیں تھا اس سے دوراتیں پہلے ساری رات بلامبالغہ اللہ تعالیٰ مجھے دشمنوں کی ناکامی اور نامرادی کی خبریں دیتا رہا اور جماعت احمدیہ کی ترقی کے متعلق بتاتارہا اورصبح جب میں اٹھا تو میری طبیعت میں جہاںبشاشت تھی وہاں میں کسی ایسے واقعہ کا انتظار بھی کررہا تھاکیونکہ دودن پہلے اس کے متعلق اللہ تعالیٰ نے تسلی دے دی ہوئی تھی۔ غرض قرآن کریم کی آیات دوسرے الفاظ عربی میںاردو میں انگریزی میں اور ساری رات یہ سلسلہ جاری رہا۔ اس خواب میںیا خواب تو نہیں کہنا چاہئے میری زندگی کا تویہ پہلا تجربہ تھا لیکن ساری رات اسی طرح ہوتا رہا کچھ دیر کے لئے دماغ غائب ہوجا تا پھر وہ سلسلہ شروع ہوجاتا تھا اور پورا بیدار ہوجاتاتھا۔ میں کسی سے باتیںکررہا ہوں اورانگریزی میں بول رہا ہوں اور میں تین سلسلوں کے متعلق بات کررہا ہوں اور وہ فقرے ایسے ہیں کہ انسان خودنہیں بنا سکتا یعنی اس حالت میںبھی میرے اوپر وجد کی کیفیت طاری ہے اور سوائے ایک لفظ کے باقی الفاظ یاد نہیں رہے مجھے اس کا دکھ ہے۔ قرآن کریم کی جوآیات ہیں ان کا توتلاوت کے وقت مجھے پتہ لگ جائے گا اگرچہ میں اس وقت بھولا ہو اہوں اور وہ آخری پانچ پاروں ہی سے ہیں۔
    بہرحال میں ان کوکہہ رہاہوں کہ فلاں سلسلہ جوتھا اس کی خصوصیت اور کامیابی کاراز اس چیز میں تھا یہ مجھے یاد نہیںرہا مفہوم اس کا یاد ہے کہ یہ بات میں نے کہی ہے اور اس کے بعد دوسرے سلسلہ کے متعلق میںنے یہ کہا جو فلاںسلسلہ تھا اس کی خصوصیت اور کامیابی کاراز اس چیز میں تھا(یہ پہلے سے مختلف تھی) اور پھر میں نے کہا کہ جماعت احمدیہ کی خصوصیت اور اس کی کامیابی کا راز ڈسپلن میںہے یعنی نظم وضبط اوراطاعت۔
    جماعت احمدیہ کی بنیاد ہی خلافت پر ہے اور خلافت جو ہے اس کی مثال یوں سمجھ لو کہ کسی نے بہت ہی شاندار عمارت بنانی تھی اس نے اس کی بنیادوں کے نیچے چھ چھ انچ ریت ڈالی۔ ریت کے ذرے بڑے کمزور ہوتے ہیں لیکن اس ریت کو کچھ اسطرح باندھا کہ وہ پتھر سے زیادہ مضبوط بنی اور اس ساری تعمیر کا بوجھ اس نے اپنے اوپر اٹھا لیا اسی طرح خلافت جو ہے اسے ریت کے ذرے سمجھ لو کیونکہ حقیقی طور پر خلفائے راشدین کی خلافتوں میں سے ہر خلافت کی نمایاں خصوصیت عاجزی ہے انہوںنے اپنے آپ کوکچھ نہیں سمجھا لیکن اللہ تعالیٰ نے الٰہی ریت کے ذروں کو اپنی قدرت کی انگلیوں میں کچھ اس طرح پکڑا کہ وہ ساتویںآسمان تک جانے والی اتنی بلند عمارت کا بوجھ برداشت کرنے کے قابل ہوگئے۔
    میں خواب میں اسکو کہتا ہوں کہ جماعت احمدیہ کی خصوصیت اور کامیابی کا رازڈسپلن میں ہے۔ میں انگریزی میںا س سے بات کررہا ہوں اور پتہ نہیں بعض دفعہ یاد ہی آجا تاہے(اگر یا آجائے تو میں اپنے رب کا بڑاہی ممنون ہونگا) میں نے بتایا ہے کہ انگریزی کے یہ فقرے اس قسم کے تھے یہ میری اس کیفیت میں بھی ایک اور کیفیت پیدا ہوگئی تھی۔
    بہرحال ہمارے ساتھ تو ہمارا رب اسطرح کا پیارکرتا ہے اس کے بعد اگر ساری دنیا کی طاقتیں مثلاً صدر نکسن بھی ہو یا رشیا کا صدر بھی ہو یورپین اقوام کے سربراہ بھی ہوں یا افریقی اقوام کے سربراہ بھی ہوں۔ جزائر کے رہنے والوں کے پرائم منسٹر بھی ہوں سارے مل کربھی مجھے آکریہ کہیں کہ ہم نے سرجوڑا اورفیصلہ کیا کہ ہم جماعت احمدیہ کو ہلاک کردیں گے اور اسے مٹادیںگے توکسی ہچکچاہٹ کے بغیر میرا جواب انہیں یہ ہوگا کہ تم افرادکے قتل پر توقدرت رکھتے ہو چونکہ پہلے الٰہی سلسلوں میں بھی یہی نظرآتا رہا ہے اس لئے تم مجھے مار سکتے ہو لیکن تم احمدیت کو مٹانے کے قابل کبھی نہیں ہوسکتے کیونکہ احمدیت خدا تعالیٰ کی حفاظت اور اس کی امان میں ہے اور احمدیت کو غالب کرنے کا حکم اور فیصلہ آسمانوں پر ہوچکا ہے اور یہ بھی فیصلہ ہوچکا ہے کہ بتدریج (یعنی تدریج کے مختلف دوروں میں سے گزرتی ہوئی) احمدیت تمام دنیاپر خدمت کے طور پر غالب آئے گی یعنی وہ دنیا کی خادم بن جائے گی۔ غالب آنے کا ہمارا یہ مطلب نہیںکہ ہم دنیا کو ایکسپلائٹ (exploit)کریں گے جب ہم دنیا پر غالب آنا کہتے ہیں تو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ دنیا ہمیں ایکسپلائٹ(exploit) کرے گی یعنی ہم سے خدمت لے گی۔پس ہم خادم کی حیثیت سے دنیا پرغالب آئیںگے حاکم کی حیثیت سے نہیں۔ جس طرح ماں اپنے بیٹے پر حاوی ہوتی ہے اسی طرح یہ جماعت بنی نوع انسان سے ماں سے زیادہ پیار کرنے کے لحاظ سے اس پر حاوی ہوگی وہ اس پیارکو Resist (ریذیسٹ) نہیں کرسکیں گے۔ وہ اس پیار کا مقابلہ نہیں کرسکیں گے وہ اس پیار کے گھائل ہوجائیںگے وہ اس پیار کے نتیجہ میں جماعت سے چمٹ کر اس میں غائب ہو جائیںگے اور پھر سب کے سب حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے قدموں میں جمع ہوجائیںگے اور جو محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے دور رہے گا اس کی حیثیت چوہڑے اور چماروں کی طرح ہوگی۔
    یہ وعدے ہیں جو اللہ تعالیٰ نے ہمیں دئیے ہیں اور ا ن وعدوں پر پختہ یقین رکھنا میرا اور آپ کا فرض ہے اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطافرمائے۔ آمین۔
    (از رجسٹر خطباتِ ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز








    جتنی عظیم بشارت ہو اتنی ہی عظیم ذمہ داری
    اور انتہائی قربانی دینی پڑتی ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۴؍ستمبر۱۹۷۰ء بمقام ایبٹ آباد۔ غیر مطبوعہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    ’’میرے یہ خطبات اس نصیحت کے سلسلہ میں اور اس وضاحت کے بیان میں ہیں کہ اپنے ایمانوں کو پختہ کرو۔ میں نے ربوہ میں گذشتہ خطبہ جمعہ میں ایمان بالغیب کے اس حصے پر روشنی ڈالی تھی کہ اس سے ایک مراد یہ بھی ہے کہ اللہ تعالیٰ جو سلسلہ قائم کرتا ہے اسے بشارتیں ملتی ہیں اور جو بشارتیں اسے ملتی ہیں ان پر پختہ یقین ہوناچاہئے جب تک ان بشارتوں پر پختہ یقین نہ ہو ہم بشاشت کے ساتھ وہ قربانیاں نہیں دے سکتے جن قربانیوں کا ہم سے مطالبہ کیا جاتا ہے۔
    گذشتہ جمعہ میں نے قرآن کریم کی آیات اور حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو جو بذریعہ الہام اور وحی بشارتیں دی گئی ہیں ان کی روشنی میں اس مضمون کو بیان کیاتھا۔ میں نے متعلقہ اقتباسات پڑھ کر نہیں سنائے تھے۔ آج اسی خطبہ کے تسلسل میں تتمّہکے طورپر حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے الہامات میں سے بعض کو میں اس وقت پڑھ کر سنائوں گا تاکہ آپ میں سے اللہ تعالیٰ جنہیں سوچنے اور فکروتدبّر کرنے کی توفیق عطاکرے اور طاقت بخشے وہ غور کریں، سوچیں اور سمجھنے کی کوشش کریں کہ کیا وعدے ہیں؟ کس قدر عظیم بشارتیں ہیں اور ان کے لئے ہمیں کس قدر قربانیاں دینی پڑیں گی؟
    جب اللہ تعالیٰ کسی کو بشارت دیتا ہے تو اس کے ساتھ ہی قوم پر یا اپنے سلسلہ پر عظیم ذمہ داریاں بھی عائد کرتا ہے۔تاریخ نبوت میں یہ کبھی نہیں ہوا کہ اللہ تعالیٰ نے جو بشارت دی ہواس کو پورا کرنے کے لئے آسمان سے فرشتے نازل ہوں اور انسانی تدبیر کے بغیر وہ اپنا کام کررہے ہوںیہ تو صحیح ہے کہ آسمان سے فرشتے نازل ہوتے ہیں اوروہ اپنا کام کرتے ہیں لیکن انسان کوبھی تدبیر کرنی پڑتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ بشارت دی تھی کہ کسریٰ اورقیصر کی سلطنتیں مغلوب ہوں گی اور وہاں اسلام غالب آئے گا۔ اس وقت قریباً دس ہزار تربیت یافتہ صحابہؓ تھے جنہوں نے انتہائی قربانیاں دے کر ان پیشگوئیوں کو پورا کرنے کی تدبیر کی انہوںنے یہ نہیں سمجھا کہ اللہ تعالیٰ نے یہ بشارت دی ہے اور اللہ تعالیٰ قادروتوانا اور متصرف بالارادہ ہے وہ آسمان سے صرف حکم دے کر ان سلطنتوں کو پاش پاش اور ٹکڑے ٹکڑے کردینے کی طاقت رکھتا ہے۔ وہ حکم دے گا اور یہ سلطنتیں ٹکڑے ٹکڑے ہو جائیں گی اور اسلام غالب آجائے گا۔ ہم آرام سے گھروں میں بیٹھے رہیں گے۔ وہ اس حقیقت کو اچھی طرح جانتے تھے کہ بشارت کے ساتھ ذمہ داری آتی ہے اور جتنی عظیم بشارت ہواتنی ہی عظیم ذمہ داری اور اتنی ہی انتہائی قربانی دینی پڑتی ہے اور ایثار پیشہ اورفدائی بن کر زندگی گزارنی پڑتی ہے۔
    چنانچہ انسان یہ دیکھ کر حیران ہوجاتا ہے کہ انہوں نے اسلام کو غالب کرنے کے لئے کیسی عظیم الشان قربانیاں دیں۔ یہ ایک ایسی تربیت یافتہ قوم تھی جنہوں نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے لمبی تربیت حاصل کی تھی ان کی تعداد بمشکل آٹھ دس ہزار تھی اوریہی وہ لوگ تھے جنکی قربانیوں کے نتیجہ میںاللہ تعالیٰ نے آسمان سے فرشتوں سے کام لیا کیونکہ یہ تدبیر کی دنیا ہے یہاں اللہ تعالیٰ کے ارادے باکل ظاہر ہوکر سامنے نہیں آیا کرتے ورنہ تو پھردوسری زندگی یعنی جنت اور دوزخ کا جوثواب ہے وہ رہے ہی نہ ۔ جب اللہ تعالیٰ ’’ کُن ‘‘ کہہ کر بارش برسادیتا ہے اگر اسی طرح اس نے ’’ کُن ‘‘کہہ کر انسان کے دل میں اپنی محبت پیداکر دینی ہوتی اور انسان کوکچھ نہ کرناپڑتا تو پھر جو بارش برسنے کی جزا بادل کو مل سکتی ہے وہی انسان کو ملتی۔ اس سے زیادہ کا تو وہ حق دا رنہ بنتا لیکن بادل کو توکوئی جزا نہیں ملتی۔ اللہ تعالیٰ نے ان سے کہا ہے کہ جو میں کہوں گا وہ تم کرو گے اور بس۔ اس کے بعد اس کی نہ کوئی اورزندگی اور نہ کسی اور شکل میں جزا ہے۔ انسان کوکہا جو میں کہتا ہوں تم کوکرنا پڑے گا اور اگر تم کروگے تو جو تھوڑی سی آزادی میں نے تمہیں ایک خاص ماحول میں دے رکھی ہے اس میںتم میری جزا کو حاصل کروگے۔ اس جزا کے لئے اللہ تعالیٰ کے پیار کے حصول کے لئے، اس کی رضا کی جنت میں داخل ہونے کے لئے ایک عقلمند معرفت رکھنے والا انسان اس کی راہ میں اس دنیا کی محبتوں اور حقیر، بے معنی اور بے وزن چیزوں کو یوں قربان کردیتا ہے کہ واقعہ میں دنیا سمجھتی ہے کہ یہ لوگ پاگل ہیں۔ اسی لئے لوگ مجنون کہا کرتے تھے کہ یہ لوگ پاگل ہیں کیونکہ انہیں پتہ ہی نہیں کہ دنیا کی چیزوں کی کوئی قیمت بھی ہے یا نہیں؟ انسانی جان کی کوئی قیمت بھی ہے یا نہیں؟ انسان کو بچوں سے پیار بھی ہوتا ہے یا نہیں؟ ان کا عمل بھی یہی ثابت کرتا ہے۔ جولوگ مدینہ سے سب کچھ چھوڑ کرچلے گئے، مہاجر بھی جنہوں نے مدینہ کو اپنا دوسرا گھر بنایا تھا اور انصار بھی جووہاں کے رہنے والے تھے سالوں دور رہتے تھے۔ انہوںنے تو کبھی اپنے بچوں کا خیال نہیں کیا، نہ انہوںنے اپنے خاندانی حالات کی پرواہ کی۔ انہیں ایک ہی خیال تھا اور ایک ہی دُھن تھی اور وہ اللہ تعالیٰ کی رضاکا حصول تھا۔
    ہماری جماعت میں ان بشارتوں پر یہ انتہائی یقین پیدا ہونا چاہئے بہتوں کو ہے جو سست ہیں انہیں اپنی سستیاں دورکرنی چاہئیں۔ کتنے عظیم وعدے ہیں ہمارے ساتھ اور پھر وعدے دینے والا عظیم قدرتوں کا مالک ہے، عزت کا سرچشمہ بھی وہی ہے اسی کے ہاتھ میں اقتدار اور دنیوی وجاہت اور طاقت ہے جواسی سے حاصل ہوسکتی ہے باقی تو اس دنیا میں عارضی چیزیں ہیں۔ آج جو پریذیڈنٹ بن جاتا ہے کل وہی شخص قوم سے گالیاں کھارہا ہوتا ہے اس دنیا کی عزت کی پائیداری ہمیں توکہیں نظر نہیںآتی۔ ساری انسانی تاریخ میں دیکھ لیں کہیں بھی دنیوی عزت ہمیں پائیدار نظر نہیںآتی۔ بڑے بڑے لوگ ہوئے مثلاًہٹلر جیسا آدمی جس کے نام سے دنیا کانپ اٹھتی تھی وہ کہاں گیا؟ اب بھی میں وہاں گیا ہوں اس زمانے میں بھی جایا کرتا تھا اس کے ساتھ لوگوں کی محبت کے نظارے بھی میں نے دیکھے ہیں۔ ایک دفعہ ہم ایک پرانے ریسٹورنٹ میں بیٹھے ہوئے تھے اتفاقاً ہٹلر بھی اپنی پارٹی کے بعض لوگوں کے ساتھ وہیں ایک کونے میں بیٹھا تھا وہاں عموماً یہ ہو تا ہے کہ اگر کسی میز کے اردگرد کوئی کرسی خالی پڑی ہوتو جان پہچان نہ ہونے کے باوجود اس پر کوئی اورآدمی آکر بیٹھ جاتا ہے۔ ہماری میز پر ایک عورت آکر بیٹھی جسے ہٹلر سے اس طرح کا پیار تھا جس طرح واقعی ابناء سے پیا ر ہوتا ہے وہ کہنے لگی ہمارا تو دل کرتا ہے کہ دشمن ہماری بوٹی بوٹی نوچ کر لے جائے مگر ہٹلر کو کچھ نہ ہو۔ پس اس کے لئے قوم کا وہ پیار بھی دیکھا اوراب جب ہم گئے ہیں تو اسی قوم کا ہٹلر کو گالیاں دیتے بھی سنا۔ غرض دنیا کی عزتیں تو آنی جانی چیزیں ہیں لیکن اللہ تعالیٰ جو حقیقی عزت کا سرچشمہ ہے جب اس کی نگاہ میں انسان اس کا پیار دیکھ لیتا ہے اورپھر اگر یہ ٹھیک رہے تواسے ہمیشہ پیار ملتا رہتا ہے۔ اس دنیا میں بھی اور ابدالآباد تک یعنی آخری دنیا میں بھی۔ اس دنیا میں ڈھکے چھپے پیار کے نظارے ہوتے ہیں کیونکہ خدا نے فرمایا ہے کہ یہ مادی دنیا ہے میں نے یہاں پردہ ڈالا ہوا ہے لیکن انسان کو اس زندگی کے بعد جو پیار نظر آئے گا وہ تو اللہ تعالیٰ کے پیار کو بھی سمجھے گاکہ مجھے وہاں تھوڑا سا ملاتھا اور میں بہت کچھ سمجھا۔ اللہ تعالیٰ کی محبت اور اس کے پیار کے اصل نظارے توا ب دیکھ رہاہوں۔
    پس ہمیں جو وعدے دیئے گئے ہیںوہ ہمارے سامنے آتے رہنے چاہئیں اور جو ان وعدوں اور بشارتوں کے تقاضے ہیں وہ ہمیں پورے کرنے چاہئیں۔ اس واسطے آج میں یہ نئی طرز کا خطبہ دینے لگا ہوں کہ چند حوالے پڑھ دوں گا اور ان پر کوئی رائے نہیں دوں گا۔ آپ غورسے سنیں اور سوچیں کہ ایک ایک عبارت میں بیس بیس ایسے وعدے ہیں جوبڑے عظیم ہیں ہر وعدہ جو ہے ہر بشارت جوہے وہ ہم پر ایک عظیم ذمہ واری ڈالتی چلی جاتی ہے۔ آپ ہی کے کچھ تو بچے ہیں ان کوتو کسی اور وقت تفصیل سے سمجھانا پڑھے گا لیکن جو پرانے احمدی ہیں انہیں اس سے پہلے سوچنا چاہئے تھا اور اگر نہیں سوچا تو انہیںاتنی سمجھ اور عقل ہے کہ وہ دنیا کی ہر چیز قربان کرکے ان بشارتوں کا اپنے آپ کو وارث بنائیں۔ پس وہ تو سمجھ سکتے ہیں اور میں ان کو یا ان کے ذہنوں کو اس طرف لانا چاہتا ہوں کہ میں عبارت پڑھوں اور احباب سوچتے رہیں۔ چند ایک حوالے میں نے لئے ہیں۔
    ۱۹۰۳ء میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے تذکرۃ الشہادتین میں دنیا کو بھی بتایا اور اپنی جماعت کو بھی مخاطب کیا۔ آپ ؑ فرماتے ہیں:-
    ’’اے تمام لوگو! سُن رکھو کہ یہ اس کی پیشگوئی ہے جس نے زمین وآسمان بنایا(اس واسطے کہ یہ پوری نہیں ہوگی اسکا توکوئی سوال ہی نہیں۔ ذمہ داری کے سمجھنے اور اس کے ادا کرنے کا سوال ہے) وہ اپنی اس جماعت کوتمام ملکوں میں پھیلا دے گا اور حجت اوربُرہان کی رُو سے سب پران کو غلبہ بخشے گا۔ وہ دن آتے ہیںبلکہ قریب ہیں کہ دنیا میں صرف یہی ایک مذہب ہوگا جو عزت کے ساتھ یاد کیا جائے گا۔خدا اس مذہب اور اس سلسلہ میں نہایت درجہ اور فوق العادت برکت ڈالے گا۔(یہاں میں تھوڑی سی وضاحت کردوں۔ خدا اس مذہب یعنی اسلام اور اس سلسلہ یعنی احمدیت میں نہایت درجہ اور فوق العادت برکت ڈالے گا) اور ہرایک کو جو اس کے معدوم کرنے کا فکر رکھتا ہے نامراد رکھے گا اوریہ غلبہ ہمیشہ رہے گا۔(ایک صدی کے لئے نہیں) یہاں تک کہ قیامت آجائے گی۔‘‘
    (تذکرۃ الشہادتین۔ روحانی خزائن جلد ۲۰ صفحہ ۶۶ )
    یہ۱۹۰۳ء کا اقتباس ہے۔ پھر آپ کو۱۹۰۴ء میں اوپر نیچے یہ دوالہام ہوئے جن میں دوبشارتیں تھیں۔ ایک ۸ ؍دسمبر ۱۹۰۴ء کو اوردوسری۱۲ ؍دسمبر۱۹۰۴ء کو۔ پہلی بشارت یہ ملی کہ:-
    رسید مژدہ کہ ایّامِ نوبہار آمد(تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ ۴۳۹)یعنی اللہ تعالیٰ نے بشارت دی کہ نئے سرے سے بہارآرہی ہے اور نوبہارسے مراد یہ ہے کہ ایک بہار پہلے اسلام پر آچکی ہے یعنی نشأۃاُولیٰ میں اور اب نشأۃ ثانیہ میں ایک اور بہار کا وعدہ ہے اور یہ بہار بالکل ویسی ہے جیسی کہ نشأۃ اُولیٰ کی بہار ہے جواگلے الہام سے ثابت ہے کیونکہ قرآن کریم نے نشأۃ اُولیٰ کی بہار کا ذکر ’’کوثر‘‘ کے لفظ میں بیان فرمایا ہے یعنی اِنَّـآ اَعْطَیْنٰـکَ الْکَوْثَرَ یہ بہار تھی اور اب بھی اس کے ساتھ وہی وعدہ ہے یعنی نو بہار میں بھی کوثر کا وعد ہ ہے۔ اس تفصیل میں تو میں اس وقت نہیںجاسکتا۔ بہرحال اِنَّـآ اَعْطَیْنٰـکَ الْکَوْثَرَ ایک بڑی عظیم بشارت تھی جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو ملی تھی۔ تفسیر کبیر میں اسے بڑی وضاحت اور تفصیل سے بیان کردیا گیا ہے جو دوست اسے پڑھ سکتے ہیں وہ ضرور پڑھیں۔غرض یہ ایک عظیم اور All round (آل رائونڈ) یعنی باقی بشارتوں پر محیط ہے۔ پس یہ اِنَّـآ اَعْطَیْنٰـکَ الْکَوْثَرَ اس قسم کی بشارت تھی۔ اب پہلے یہ فرمایا کہ’’رسید مژدہ کہ ایامِ نوبہار آمد‘‘ یعنی ایک بہار پہلے آچکی ہے اور نئی بہار آرہی ہے۔ یہ خوشخبری ہمیں ۸ کو ملی اور بارہ ۱۲ تاریخ کو اللہ تعالیٰ نے آپ کوالہاماً فرمایا لَا تَیْئَسُوْا مِنْ خَزَآئِنِ رَحْمَۃِ رَبِّیْ(تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ ۴۴۰) ابھی تک جو مسلمان احمدی نہیں ہوئے ان پر تنزلی کا زمانہ ہے وہ بڑے مایوس ہیں۔مایو س ہونابھی چاہئے کیونکہ ہر طرف الٰہی وعدوں کے خلاف تنزلی اور بے عزتی کے حالات میں سے وہ گزر رہے ہیں۔ اللہ تعالیٰ انہیں معاف کرے اور انہیں ہدایت دے۔لَا تَیْئَسُوْا مِنْ خَزَآئِنِ رَحْمَۃِرَبِّیْ۔ میں اللہ تعالیٰ نے جماعت احمدیہ کو مخاطب کرکے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعے یہ فرمایا کہ اس کی رحمت کے خزانے جو کوثر کی شکل میں اس سے پہلے آئے تھے وہ اب پھر آنے والے ہیں۔ پس اللہ تعالیٰ کی رحمت کے خزائن سے تم مایوس نہ ہو۔ اِنَّـآ اَعْطَیْنٰـکَ الْکَوْثَرَ یہ اسی الہام کا ایک حصہ ہے کیونکہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے روحانی فرزند ہیں۔ اسلئے ہم اس کا ترجمہ یوں کریں گے کہ وہ کوثر جو حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو عطا ہوا تھااس کا تمہیں پھر سے مہتمم بناکر مبعوث کیا ہے۔ اسی کوثر کا اہتمام ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے بڑے زور سے فرمایا ہے ’’سب کچھ تیری عطا ہے گھر سے توکچھ نہ لائے(درثمین صفحہ ۳۶)‘‘ پس فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کی رحمت کے جوخزانے دنیا نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں اسلام کی نشأۃ اُولیٰ میں حاصل کئے اور آسمان سے نازل ہوتے دیکھے۔دنیا اب وہی جماعت احمدیہ کی شکل میں دوبارہ دیکھے گی کیونکہ کوثر کا مہتمم حضرت مسیح موعود ومہدی معہود علیہ السلام کو بنا دیاگیا ہے۔
    پھر اپریل۱۹۰۵ء میں اللہ تعالیٰ نے آپ کو بذریعہ وحی یہ خبردی کہ جب اس قسم کا الٰہی سلسلہ امت محمدیہ کے اندر اسلام کی نشأۃ ثانیہ کے طور پر اسلام کو ساری دنیا میں غالب کرنے کے لئے قائم ہوگا۔دنیا اس کی مخالفت کرے گی اوروہ اس میں ناکام ہوگی۔ یہ ایک واقعہ ہے ایک بشارت ہے۔ پس دنیا کی مخالفت ضروری تھی اور ساری دنیا نے دیکھی۔ دنیا کی ساری طاقتیں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ کی آواز کو خاموش کرنے کے لئے متحد ہوگئیں اور دنیا کی سب طاقتیں متحد ہونے کے باوجود ناکام ہوئیں اور وہ آواز خاموش نہیں کی جاسکی۔ وہ آواز گونج رہی ہے اور انشاء اللہ گونجتی چلی جائے گی یہاںتک کہ قیامت آجائے جیسا کہ پہلے حوالہ گزرچکا ہے اوریہ ایک بڑی زبردست دلیل ہے۔ افریقہ والے اسے بڑی آسانی سے سمجھ لیتے تھے۔ بہرحال یہ بشارت دی کہ دشمن اپنے منصوبوں میں ناکام ہوگا جماعت کو آسمانی تائیدات اور آسمانی نشانات حاصل رہیں گے۔ آپؑ فرماتے ہیں:-
    ’’یاد رہے کہ ان نشانوں کے بعد بھی بس نہیں ہے بلکہ کئی نشان ایک دوسرے کے بعد ظاہر ہوتے رہیں گے یہاں تک کہ انسان کی آنکھ کھلے گی اور حیرت زدہ ہوکر کہے گا کہ کیا ہوا چاہتا ہے ۔ ہر ایک دن سخت اور پہلے سے بدتر آئے گا۔ خدا فرماتا ہے کہ میں حیرت ناک کام دکھلائوں گا اور بس نہیں کروں گا جب تک کہ لوگ اپنے دلوں کی اصلاح نہ کرلیں۔‘‘ (تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ۴۵۱)
    پھراس کے بعد بشارت دی کہ تمام مسلمان حضرت بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے روحانی فرزند کے جھنڈے تلے جمع کردیئے جائیں گے۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ نے آپؑ کویہ الہاماً فرمایا۔ ’’اِنِّیْ مَعَکَ یَا ابْنَ رَسُولِ اللّٰہِ‘‘(تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ۴۹۰)اے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے عظیم روحانی فرزند میں تیرے ساتھ ہوں جس طرح میں تیرے باپ کے ساتھ تھا۔ ورنہ ابن کہنے کی ضرورت نہیں اس وجہ سے میں یہ ترجمہ کرہا ہوں۔ پھر فرمایا’’سب مسلمانوں کو جوروئے زمین پر ہیں، جمع کرو۔ عَلٰی دِینٍ وَاحِدٍ‘‘ (تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ۴۹۰)
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰہ والسلام نے اس الہام پرایک لطیف علمی نوٹ تحریر فرمایا ہے کہ احکام الٰہی دوقسموں کے ہوتے ہیں ایک کا تعلق شریعت سے ہوتا ہے مثلاً نماز پڑھو، خدائے واحد و یگانہ پر ایمان لائو، زکوٰۃ دو، روزے رکھو وغیرہ یہ سارے احکام شریعت سے تعلق رکھنے والے ہیں اور اس کا مطلب یہ نہیں ہوتا کہ اس حکم کے باوجود سب لوگ اس پر عمل بھی کریں گے بلکہ شریعت سے تعلق رکھنے والے بعض احکام ایسے بھی ہوتے ہیں کہ جن میں یہ اشارہ ہوتا ہے کہ ایک گروہ ایسا بھی ہوگا جوان پر عمل نہیں کرے گا اس واسطے انہیں پہلے ہی جھنجھوڑا ہے کہ تمہیں عمل کرناچاہئے اور ایک اشارہ یہ آگیا کہ بہرحال وہ شریعت سے تعلق رکھنے والے ہیں اور انسان کو یہ آزادی ہے کہ چاہے تو ان پر عمل کرے اور چاہے تو نہ کرے لیکن ان کے علاوہ ایک کُونی اوامر ہوتے ہیں جن کا ’’ کُن‘‘کے ساتھ تعلق ہوتا ہے یعنی تقدیر کے ساتھ اور وہ ضرور ہوجاتے ہیں۔ چنانچہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰہ والسلام فرماتے ہیں:-
    ’’یہ امر جو ہے کہ سب مسلمانوں کوجو روئے زمین میں ہیں جمع کرو۔ عَلٰی دِیْنٍ وَّاحِدٍ یہ ایک خاص قسم کا امر ہے۔ احکام او رامردوقسم کے ہوتے ہیں۔ ایک شرعی رنگ میں ہوتے ہیں جیسے نماز پڑھو، زکوٰۃ دو، خون نہ کرو وغیرہ۔ اس قسم کے اوامر میںایک پیشگوئی بھی ہوتی ہے کہ گویا بعض ایسے بھی ہونگے جو اس کی خلاف ورزی کریں گے جیسے یہود کو کہا گیا کہ توریت کو محرف مبدل نہ کرنا، یہ بتاتا تھا کہ بعض ان میں سے کریںگے۔ چنانچہ ایسا ہی ہوا۔ غرض یہ امر شرعی ہے اور یہ اصطلاح شریعت ہے۔‘‘
    پھر آپ فرماتے ہیں:-
    ’’دوسرا امر کونی ہوتا ہے اوریہ احکام اور امر قضا وقدر کے رنگ میں ہوتے ہیں جیسے قُلْنَا یَا نَارُ کُونِیْ بَرْدًا وَّ سَـلَامًا ( برد اورسلام ہوتو یہ شرعی حکم نہیں تھا آگ ٹھنڈی ہوگئی اس کے بغیر چارہ ہی نہ تھا)اوروہ پورے طور پر وقوع میں آگیا اور یہ امر جو میرے اس الہام میں ہے یہ بھی اسی قسم کا معلوم ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ چاہتا ہے کہ مسلمانانِ روئے زمین عَلٰی دِینٍ وَّاحِدٍ جمع ہوں اور وہ ہوکر رہیں گے۔ ہاں اس سے یہ مراد نہیں ہے کہ ان میں کوئی کسی قسم کا بھی اختلاف نہ رہے۔ اختلاف بھی رہے گا مگر وہ ایسا ہوگا جو قابلِ ذکر اور قابلِ لحاظ نہیں۔‘‘
    (تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ۴۹۰)
    پس حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰہ والسلام نے فرمایا ہے کہ یہ ایک عظیم بشارت ہے اور یہ پوری ہوکر رہے گی۔ اب یہ جو تفرقہ ہے اور اس تفرقہ کے نتیجہ میں ہمیں جو سوئیاں چبھوئی جاتی ہیں۔ اس سے زیادہ توہمارا کوئی نقصان نہیں کرسکتے۔ بہرحال جو سوئیاں چبھوئی جارہی ہیں وہ تو ہیں لیکن یہ ایک حقیقت ہے اورمستقبل اس حقیقت کو اپنی گود میں لئے دنیا کا مستقبل نہیں بن سکتا کہ یہ تمام فرقے جو مختلف راہوں پر چل رہے ہیں وہ تمام اسلام کے صحیح حُسن کے گرویدہ ہوکر مہدی معہود کے جھنڈے تلے جمع ہوجائیںگے اور واقعہ بھی ہوگا او راسکی ذمہ واری اس امر میں ہے کہ ’’جمع کرو‘‘۔ پس ہمیں ہرقسم کی قربانی دے کر اس پیشگوئی کوپورا کرنا ہے۔
    اس واسطے میں اپنی ینگر جنریشن یعنی نئی پود کو یہ باربار کہہ رہا ہوں کہ کسی کے خلاف تمہارے دل میں غصہ نہیں پیدا ہونا چاہئے۔ لوگ ہمیں گالیاں دیتے ہیں۔ برابھلا کہتے ہیں۔ جولوگ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو مجدّد جانتے ہیں وہ بھی بعض دفعہ اس قسم کی بے ہودہ بات لکھ دیتے ہیں کہ اسے پڑھکر انسان کے رونگٹے کھڑے ہوجاتے ہیں مثلاً پیغام صلح میں خاندان خلافت کی عورتوں پر ایسی خبیثانہ چوٹ کی ہے جو محض بکواس ہے جسے انسان برداشت نہیں کرسکتا لیکن ہمیں غصہ نہیں آنا چاہئے ہم نے انہیں بھی کھینچ کراپنی طرف لانا ہے اور کھینچ کر لارہے ہیں جو غیر احمدی ہیں انہیں بھی ہم نے کھینچ کر لا نا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے ہمیں پیار کے لئے پیدا کیا ہے اور ہمیں یہ حکم دیا ہے کہ تم تمام مسلمان فرقوں کو حضرت مہدی معہودؑکے جھنڈے تلے جمع کرکے ’’عَلٰی دِیْنٍ وَّاحِدٍ‘‘ لائو۔ سارے تفرقے مٹ جائیں گے۔ باقی انسان انسان کی طبیعت اور مزاج اور قوتوں میں فرق ہوتا ہے اس کے نتیجہ میں اختلاف پیدا ہوجاتا ہے۔ یہ اپنی جگہ درست ہے لیکن ایسا اختلاف قابل اعتناء نہیں ہوتا بلکہ اگر عقلمندی سے ایسے اختلافات سے فائدہ اٹھایا جائے تویہ ’’اِخْتِلَافُ اُمَّتِی رَحْمَۃٌ‘‘کا مصداق بن جاتے ہیں لیکن یہ سارے فرقے مٹ جائیں گے اور یہ بریلوی دیوبندی اوردوسرے جھگڑے مٹ جائیں گے اور یہ جو انہوں نے آپس میں کفر بازی شروع کی ہوئی ہے جسے یہاں دہراتے ہوئے بھی شرم آتی ہے۔ ویسے ہم نے ضرورت کے لئے ان کے ایک دوسرے کے خلاف فتاویٰ کفر کو اکٹھا کروایا ہے اور میں نے ان کی ایک کاپی بنوائی ہے ہر فرقے نے دوسرے کوکافر ہی نہیں کہا بلکہ اس کے خلاف اتنی گندی زبان استعمال کی ہے کہ اسے پڑھ کر انسان بڑا حیران اور پریشان ہوجاتا ہے۔ میں نے ان کے اس قسم کے فتووں کو ایک جگہ اکٹھا کروادیا ہے تاکہ اگرکوئی آئے اور کہے کہ جی احمدیوں پر کفرکا فتویٰ لگا ہوا ہے تو اسکو کہا جائے کہ پڑھ لو پھر ہمارے ساتھ بات کرنا۔ لیکن یہ کفر بازی بے ہودگی ہے اسے ہم درست نہیں سمجھتے ہم تو اس ایمان پر قائم ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ کسی کلمہ گو کو کافر نہیں کہا جاسکتا۔ لیکن صرف اتنا ہی نہیں فرمایا بلکہ کچھ اور بھی فرمایا ہے یہ ہمارے لاہور والے بھائی اگلا حصہ بھول جاتے ہیں آپ نے یہ توفرمایا ہے اور ہم اس پر ایمان لاتے ہیں کہ کسی کلمہ گو کوکافر نہیں کہا جاسکتا یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کاارشاد ہے لیکن اس کے بعد جو فرمایا ہے وہ یہ ہے کہ جو کسی کلمہ گو کو کافر کہے گا وہ کفر اُلٹا اس پر پڑے گا اور وہ کافر بن جائے گا۔ ہم نے کسی کوکافر کیا کہنااور کیوں کہنا۔اوّل تو یہی سوچنا چاہئے میرا جیسا عاجزانسان تو یہ سوچ ہی نہیں سکتا کہ میں کسی کو کافر کہوں اور وہ کافر بن جائے گا انسان کاکام کافر بنانا نہیں نہ دیندار بنانا ہے قرآن کریم نے اس کی وضاحت کی ہے۔ جسے اللہ تعالیٰ ہلاک کرنا چاہے تم اسے جاکر کیسے ہدایت دے دو گے قران کریم کہتا ہے ہدایت بھی اللہ تعالیٰ ہی دیتا ہے اور کفر کا فتویٰ بھی اللہ تعالیٰ کا چلتا ہے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی یہی فتویٰ دیا ہے۔ پس اس دوسرے حصے کے متعلق خاموش ہوجانا یہ تودرست نہیں ہے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام قریباًتین سال تک (یہ میرا اندازہ ہے پوری طرح اس زمانے کا جو امتداد ہے اسے چیک نہیں کیا گیا لیکن میرا اندازہ یہ ہے کہ آپ نے ۳ سال تک) ان دو سو چوٹی کے مولویوں کو جنہوں نے آپؑ پر کفر کا فتویٰ لگایا تھا انہیں سمجھا تے رہے کہ تم اس کھیل میں نہ پڑو۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ قول ہے اگر تم اصرار کروگے تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے اس قول کے مطابق اپنے آپ کو بھی کافر بنالو گے یہاں تک کہ جب انہوںنے اصرار سے مباہلے کا چیلنج دیا تو آپؑ نے فرمایا کہ میں تمہارا چیلنج قبول کرنے کے لئے اس لئے تیار نہیں کہ میں کسی کلمہ گو کوکافر نہیں کہتا اور جوکلمہ پڑھنے والا مسلمان ہے اس کے مباہلہ کو جائز نہیں سمجھتا لیکن آگے سے آپ کو جواب یہ ملا کہ آپ ہمیں کافرنہ سمجھتے ہوں ہم توآپؑ کو کافر سمجھتے ہیں ہم سے مباہلہ کریں۔ غرض بڑے لمبے عرصہ تک آپ انہیں سمجھاتے رہے۔ یہاں ہمارے ایک ڈین (Deen)آئے تھے انہیں یہ مسئلہ سمجھ نہیں آرہا تھا میں نے انہیںبتایا کہ ہم تو عاجز بندے ہیں ہماری کیا مجال کہ کسی کلمہ گو کو کافر کہیں لیکن ہماری یہ بھی مجال نہیں کہ جسے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا فر کہیں ہم اسے مسلمان سمجھنے لگ جائیں۔ میں نے اسے جب یہ مسئلہ سمجھایا تو وہ کہنے لگے کہ اب مجھے سمجھ آگئی ہے۔ اس وقت تو اس نے بیعت نہیں کی تھی مگر بعد میں اس نے بیعت کرلی۔
    پس سچی بات یہی ہے۔ اسلئے آپ بھی تیزی نہ دکھایا کریں کسی کلمہ گو کو کافر کہنے کا کسی کو حق نہیں ہے لیکن جو کلمہ گو کو کافر کہتا ہے اسے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کافر کہہ چکے ہیں ہمیں کہنے کی ضرورت ہی نہیں وہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے قول کے مطابق خود ہی کافر بن گیا۔ آپ میں نہ اتنی طاقت ہے اور نہ اتنی بزرگی ہے کہ کسی کو کافر کہہ سکیں۔ لیکن آپ میں اتنی جرأت بھی نہیں ہونی چاہئے کہ جسے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کافر کہیںآپ اسے مسلمان سمجھنے لگ جائیں۔ یہ توآنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف شوخی ہے۔
    بہرحال یہ کفر بازیاں سب ختم ہوجائیں گی ہم اس بات سے خوش ہیں ہمیں اس بات پر رونا نہیں کہ آج ایک دنیا جو ہے اس گند میں پھنسی ہوئی ہے ایک دوسرے کو کافر کہہ رہی ہے ہمیں اس کی پرواہ ہی کوئی نہیں کیونکہ ہمارے لئے جو راہ مقرر ہے ہم اس پر گامزن ہیں اور ہم خوش ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے ہمیں یہ بشارت دی ہے کہ یہ تمام فرقے جو ایک دوسرے کو کافر کہہ رہے ہیں وہ ہدایت کو پالیںگے اور وہ ایک روشنی اورصداقت اور اسلام کے حسین چہرہ کو دیکھ لیں گے اور اسلام کے جھنڈے تلے آکر جمع ہوجائیںگے ہم اس بات سے خوش ہیں کہ کفر بازیاں ختم ہوجائیںگی اس دن تک پتہ نہیں کون زندہ رہتا ہے اور کون نہیں جس دن جماعت احمدیہ کو یہ حکم دینا پڑے گا کہ اس گند کے نقش مٹا دویعنی اس قسم کی کتابیں لائبریریوں سے نکال کر جلادی جائیں گی جن میں بریلویوں نے دیوبندیوں اور دیو بندیوں نے بریلویوں پر اور اسی طرح جتنے فرقے ہیں انہوںنے ایک دوسرے پر کفر کے فتوے لگائے ہیں۔ اب توسیاسی فتوے بھی ان میں شامل ہوگئے ہیں وہ بھی جلا دئیے جائیںگے۔ دنیا ان کو بھول جائے گی اس واسطے بھول جائے گی کہ ان کی ضرورت ہی نہیں رہے گی پیار کو یاد رکھنے کی ضرورت ہوگی ہم ایک دوسرے کے ساتھ پیار کریں گے۔ دشمنی اور حقارت اور غصہ اورغلط طعنے اور کفر کے فتوے یہ سب کے سب قصہ پارینہ بن جائیں گے۔پس حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کویہ بشارت ملی اور یہ قوی بشارت ہے یعنی ہمیں حکم دیا گیا ہے کہ ہم تمام مسلمانوں کو دین واحد پر جمع کریں۔آپ فرماتے ہیں کہ یہ ہوکر رہے گا۔ یہ ہو نہیں سکتا کہ یہ پیشگوئی پوری نہ ہو۔ ساری دنیا کی طاقتیں مل کربھی اس بشارت کے پورا ہونے کے راستہ میں روک نہیں بن سکتیں۔
    چنانچہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام فرماتے ہیں:-
    ’’خدا تعالیٰ نے مجھے باربار خبر دی ہے کہ وہ مجھے بہت عظمت دے گا اور میری محبت دلوں میں بٹھائے گا اور میرے سلسلہ کو تمام زمین میں پھیلائے گا اور سب فرقوں پر میرے فرقہ کو غالب کرے گا اور میرے فرقہ کے لوگ اس قدرعلم اور معرفت میں کمال حاصل کریں گے کہ وہ اپنے سچائی کے نور اوراپنے دلائل اور نشانوں کی رو سے سب کا منہ بند کردیں گے۔‘‘ (تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ۵۱۷)
    یہ بڑی زبردست بشارتیں ہیں جو احمدیت کے ذریعہ اسلام کو تمام دنیا میں غالب کرنے کے کام سے تعلق رکھتی ہیں یعنی پختگی ایمان اور آسمانی نشانوں کے ساتھ تمام دنیا پر غالب آنا۔ انسانی حقیقت کیا ہے بڑائی کی ضرورت نہیں۔اتنا کہہ دیتا ہوں کہ جماعت نے میری قبولیت دعا کے ہزاروں نشان دیکھے ہیں۔ بعض کو میں بیان کر دیتاہوں اور بعض کے متعلق اعلان نہیں کرتا لیکن اگرہم نہیں کرتے تو ان کو کرنا چاہئے کیونکہ اللہ تعالیٰ کی بشارت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کا نشان جماعت کے ساتھ رہے گا۔ اگر ہمارے پاس انہیں آسمانی نشان نظر نہیں آتا توان کے پاس ہوناچاہئے ورنہ اللہ تعالیٰ کا یہ وعدہ جھوٹا ثابت ہوتا ہے اور خدا تعالیٰ اپنے وعدوں کا سچا ہے۔ ہم اس بحث میں نہیں پڑتے کہ ان کے پاس نشان ہے یا نہیں۔ لیکن ان کو یہ ثابت کرنا پڑے گا کہ ان کے پاس نشان ہے ہم سچائی کے نور اورا پنے دلائل اور نشانوں کو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی صداقت کی دلیل میں پیش کریں گے۔ البتہ سچائی کے نور کی وضاحت مجھے کرنی پڑے گی کیونکہ ممکن ہے کوئی اسکو نہ سمجھ سکا ہو۔
    سچائی کے نور کا مطلب یہ ہے کہ نورانی زندگی حاصل ہوگی یہ بڑی زبردست دلیل ہے اس واسطے اپنی تربیت کی فکر کرنی چاہئے۔ ایک تربیت یافتہ وجود سچائی کے نور کو اپنے وجود سے ظاہر کرتا ہے اور وہ یہ بتارہا ہوتا ہے اس نے خدا کے لئے اس کے احکام کی پیروی کرتے ہوئے اپنی زندگی کے دن گزارے ہیںاور گزار رہا ہے۔ یہ سچائی کا نور انسان کے جسم سے پھوٹ پھوٹ کر نکلتا ہے۔ اب وہاں افریقہ میں یا دوسری جگہوں پر جو ہمارے مبلغین گئے ہوئے ہیںاللہ تعالیٰ نے اپنے فضل سے ان کی عزت اس وجہ سے غیرو ں کے دل میں ڈالی ہے کہ ان کے وجود سے غیروں نے نو ر کی کرنیں نکلتی دیکھیں۔ حضرت بانی سلسلہ احمدیہ علیہ السلام نے یہ فرمایا ہے کہ تربیت کے لحاظ سے جماعت اپنے بلند مقام پر قائم رہے گی۔ یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے کہ چند لوگوں کے علاوہ باقی جماعت بڑے بلند مقام پر قائم ہے اور دوسرے دلائل میں بھی ان کا کوئی مقابلہ نہیں کرسکتا کیونکہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے اپنے دلائل ایک بڑا سمندر ہے جو قیامت تک ختم نہیں ہوگا لیکن یہ سمندر بڑی بلندی پر ہے۔ ہماری دنیا کا جو سمندر ہے وہ بلندی پر نہیں ہوتا اس واسطے اس کا وہ نتیجہ نہیں نکلتا جو بلندی پر واقعہ پانی کا نکلا کرتا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے دلائل کا سمندر حضرت بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی رویت اور شہادت کے نتیجہ میں ساتویں آسمان پر ہے۔ آپ نے اپنے مہدی(اِنَّ لِمَھْدِیِّنَا) اور مسیح کو ساتویںآسمان پر دیکھا۔ یہ عجیب بات ہے اس میں بھی آپ غور کریں کہ ساتویں آسمان پر آپ نے حضرت موسیٰ علیہ السلام کو نہیں دیکھا جو آپ سے پہلے نسبتاً مکمل شریعت لے کر دنیا کی طرف آئے تھے۔ ساتویں آسمان پر آپ نے حضرت ابراہیم علیہ السلام کو دیکھا اورمسیح موعود کو دیکھا اور یہ ہر دو غیر تشریعی نبی ہیں پس روحانی بلندی کے اعتبار سے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد نسبتاً کامل شریعت حضرت موسیٰ علیہ السلام کی تھی کیونکہ یہ قریب قریب زمانہ میں مبعوث ہوئے ہیں۔ بہرحال حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے دلائل اور دوسری برکات کا جو سمندر ہے وہ ساتویں آسمان پر ہے سات ہزار فٹ بلند پہاڑوں پر جو Lakes(لیکس) ہوتی ہیں ان کے نتیجہ میں پہاڑوں پر چشمے پید اہوجاتے ہیں مگر سمندرکا جو پانی ہے اس کے نتیجہ میں چشمے پیدا نہیں ہوتے کیونکہ وہ سب سے زیادہ نشیب میں ہوتا ہے۔ اسی سے ہم اپنی بلندی کو ناپتے ہیں جیسے مثلاً یہ محاورہ ہے (جو سائنس میں مستعمل ہوتا ہے) کہ سطح سمندر سے سات ہزار فٹ کی بلندی۔ اگر چہ سمندر کا پانی عظیم ہے لیکن بے فیض ہے اس میں رطب ویابس آکر مل گیاہے لیکن جو چودہ ہزار فٹ کی بلندی پر پہاڑوں میں Lakes(لیکس) ہوتی ہیں یعنی بہت بڑی بڑی اور میل ہا میل چوڑی جھیلیں ہوتی ہیں۔ان کے نتیجہ میں کسی پہاڑی ٹکڑی سے آپ کو چھوٹا بڑا چشمہ نظر آتا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کا سمندر نور کا بھی اور دلائل کا بھی اور نشانات کا بھی ساتویںآسمان پر ہے(جیسا کہ ابھی میں نے بتایا ہے کہ یہ اللہ تعالیٰ نے حضرت نبی اکر م صلی اللہ علیہ وسلم کو معراج کی رات دکھایا تھا) دنیا میں سب سے زیادہ چشمے اس پانی کے پھوٹنے ہیں اور وہ پھوٹ رہے ہیں۔ ہمارے ہزاروں خاموش مجاہد پیدا ہوئے جس طرح فوجیوں نےUnknown Soldiersکا تہوار بنا لیا ہے ہم تو ایسے تہواروں کے قائل نہیں ورنہ وہ بھی بن جاتا۔ ہمارے اندر سینکڑوں ہزاروں لوگ ہیں جو اللہ تعالیٰ کے نشانات دیکھتے ہیں لیکن اس نور کے جو ان کے جسموں سے پھوٹ رہا ہوتا ہے کسی اور کوان کاعلم ہی نہیں ہوتا کیونکہ ان کو ظاہر کرنے کی ضرورت ہی نہیں ہوتی جس طرح مثلاً اللہ تعالیٰ کی طرف سے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو ایسی ہزاروں باتیں بتائی گئیں جو بالکل تفصیلی ہیں اور ان میں سے کچھ احادیث نے، کچھ تاریخ نے محفوظ رکھیں۔چند ایک ایسی ہیں جو آپ نے اپنے صحابہ کو بتادیں مثلاً صحابی تھے جنہیں آپ نے ایسے منافقین کے نام تک بتا دئیے تھے جنہوں نے امت میں فتنہ پید اکرنا تھا۔ اس میں یہ بھی کمال ہے کہ ایک بات تھی جسے عام نہیں کیا دوسرے یہ بھی کہ اللہ تعالیٰ نے آپ کو یہ بھی بتا دیاتھا کہ یہ فتنہ کے وقت زندہ رہے گا ورنہ اسے بتانے کی کوئی ضرورت نہیںتھی اور پھر وہ زندہ رہا پھروہ اپنے اپنے وقت کے اوپر اشارے کرجاتے تھے۔ پس ایک شخص کے متعلق اللہ تعالیٰ نے بتادیا کہ یہ زندہ رہے گا اسے یہ باتیں بتا دو تاکہ اپنے وقت پر امت محمدیہ ان سے فائدہ اٹھائے۔ مگر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم پر ہزاروں وحیاں ایسی بھی ہوئیں تھی ۔ بعض ایسی تھیں جس کا احادیث میں ذکر آگیا بعض ایسی تھیں جو بعض لوگوں کو بتا دی گئیں۔ مگر قرآن کریم جو کامل اور مکمل شریعت کی وحی تھی وہ محفوظ رہی اس کے متعلق اللہ تعالیٰ کا یہ وعد ہ تھا کہ اس کا ایک ایک حرف محفوظ رہے گا۔ کتنی زبردست ضمانت ہے۔(میں نے تو شروع میں کہا تھا کہ تفصیل میں نہیں جائوں گا لیکن چلاگیا) اسی الہام کے تسلسل میں حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام فرماتے ہیں:-
    ’’اورہر ایک قوم اس چشمہ سے پانی پیئے گی۔(چشمے سے پانی پیئے گی کا مطلب ہی یہی ہے کہ وہ چشمہ نکل آئے گا حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے محمدیؐ پانی کا کوئی گھانا میں ، کوئی نائیجیریا میں، کوئی گیمبیا میں کوئی سپین میں کوئی جرمنی میں کوئی یورپ کے دوسرے ممالک میں کوئی کمیونسٹ ممالک میں وہی پانی جوآبِ محمدؐ ہے یعنی آبِ زلال محمدؐ اس پانی کے چشمے آب کیLake(لیک) ہی سے نکلیں گے اور وہ سیراب کریں گے) اور یہ سلسلہ زور سے بڑھے گااور پھولے گا یہاں تک کہ زمین پر محیط ہوجاوے گا۔ بہت سی روکیں پیدا ہوں گی اور ابتلاء آئیںگے مگر خدا سب کو درمیان سے اٹھا دے گا اور اپنے وعدہ کو پورا کرے گا۔‘‘
    آپ نے بڑی تحدّی سے پھرآگے فرمایا:-
    ’’سو اے سننے والو! ان باتوں کو یاد رکھو اور ان پیش خبریوں کو اپنے صندوقوں میں محفوظ رکھ لو کہ یہ خدا کا کلام ہے جو ایک دن پورا ہوگا۔‘‘
    (تذکرہ ایڈیشن چہارم صفحہ۵۱۷)
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے جس تحدّی کے ساتھ اور جس یقین اور وثوق کے ساتھ یہ فرمایا ہے کہ اے سننے والو! ان باتوں کو یاد رکھو کہ یہ خدا کا کلام ہے جو ایک دن پورا ہوگا۔ ہر احمدی کے دل میں ان بشارتوں کے متعلق یہ وثوق اور یہ یقین پیدا ہونا چاہئے اور قائم ہوناچاہئے۔ یہ ہماری ذمہ واری ہے اللہ تعالیٰ ہمیں اپنی ان ذمہ واریوں کر نباہنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔
    (از رجسٹر خطبات ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز









    اللہ تعالیٰ نے جماعت احمدیہ کو
    غلبۂ اسلام کے لئے پیدا کیا ہے
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۱۱؍ستمبر۱۹۷۰ء بمقام سعید ہائوس ایبٹ آباد۔غیرمطبوعہ)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور نے فرمایا:-
    پچھلے چند دنوں سے کئی تکلیفیں اکٹھی ہوگئی ہیں ایک تو پیچش نے بڑا شدید حملہ کیا دوتین دن سے بخار بھی آرہا ہے اور خون کا دبائو بھی کافی کم رہا ہے اسلئے میں اس وقت مختصراً ایک ضروری امر کی طرف پورے زور کے ساتھ دوستوں کو متوجہ کرنا چاہتا ہوں۔ اور وہ یہ ہے کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کو اللہ تعالیٰ نے اپنی وحی کے ذریعہ یہ اطلاع دی کہ جب اللہ تعالیٰ اپنے بندے یا اپنی کسی جماعت سے پیارکرتا ہے اور اپنی نعمتوں سے اور اپنے فضلوں سے اوراپنی رحمتوں سے انہیں نوازتا ہے تو جَعَلَ لَہٗ الْحَاسِدِیْنَ فِیْ الْاَرْضِ زمینی لوگ حسد کرنے لگ جاتے ہیں یعنی آسمانی تائید کے نتیجہ میں زمینی حسدپیدا ہوتا ہے جس کی مختلف شکلیں ہوتی ہیں۔ مگر یہ سب کی سب حسد کا نتیجہ ہوتی ہیں۔
    ا س وقت اللہ تعالیٰ نے بڑافضل کرتے ہوئے غلبہ اسلام کے یہ سامان پیدا کئے ہیں کہ افریقن اقوام کا دل اسلام اوراحمدیت کی طرف پھیرا اور جو منصوبہ وہاں غلبہ اسلام اور خدمت اقوام افریقہ کے لئے تیار کیا گیا تھا اس میں وہ لوگ بڑی محبت اور بڑے شوق سے حصہ لے رہے ہیں میں نے کئی دفعہ بتایا ہے کہ آٹھ دس سے زیادہ مقامات سے ہمیں یہ درخواست پہنچی ہے کہ زمین بھی ہم دیں گے اور عمارت بھی ہم بنائیںگے آپ یہاں میڈیکل سنٹرز کھولیں اور ڈاکٹرز بھجوائیںیعنی جوہمارا ابتدائی سرمایہ ہے وہ ان کی جیبوں سے خرچ ہوگا اور جو ہمارا کام ہے یعنی تبلیغ اسلام کا وہ ہمارا ہی ہوگا اور ہم وہاں کام کریں گے۔ وہاں شکل یہ بنتی ہے کہ ایسے اداروں کووہ جماعت کے نام پر رجسٹرڈ کروا دیتے ہیںچنانچہ اس طرح یہ جماعت کی ملکیت بن جاتی ہے۔
    یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے اس کے نتیجہ میں حسد پیدا ہونا چاہئے تھا جیسے کہ ہمیں پہلے بتایا جاچکا ہے چنانچہ حسد پیدا ہوامثلاً ایک بڑی منظم جماعت ہے اس کے متعلق ایک ذریعہ سے یہ خبر ملی ہے واللّٰہ اعلم کہاں تک درست ہے یہ بات مضمون کے لحاظ سے تودرست معلوم ہوتی ہے لیکن Source of information یعنی ذریعہ خبر ابھی تک ایک ہے پہلے تو بہت سارے ذرائع سے علم ہوتا رہتا ہے انشاء اللہ پتہ لگ جائے گا کہ یہ بات کہاں تک درست ہے؟ بہرحال بظاہر درست معلوم ہوتی ہے اور وہ یہ ہے کہ انہوں نے ایک ریزولیوشن پاس کیا ہے جس کا مفہوم یہ ہے کہ افریقہ میں جماعت احمدیہ اتنی مضبوط ہوچکی ہے کہ وہاں ہم ان کا مقابلہ نہیں کرسکتے اسلئے پاکستان میں ان کو کچلو تاکہ ان کے جو وہاں پرگرام ہیں ان کے اوپر اثر پڑے۔ جماعت احمدیہ کو کچلنے کی طاقت تو اللہ تعالیٰ نے کسی کو نہیں دی لیکن اس نے حسد کرنے کا اختیار سب کو دیا ہے۔
    ویسے اللہ تعالیٰ نے انسان کو پیدا کیا اور فرمایا کہ یہ تمہاری اپنی مرضی ہے کہ رشک کرو یا حسد کرو یعنی جب اللہ تعالیٰ کے فضل کسی پر نازل ہوں تو ایک ذہنیت یہ پیدا ہوتی ہے کہ خدا کا بندہ کہتا ہے کہ میرے بھائی نے خلوص نیت کے ساتھ اپنے رب کے حضور اپنا سب کچھ دے دیا اور اس کے فضلوں کو حاصل کیا اور ان فضلوں کے حصول کا یہ دروازہ میرے لئے بھی کھلا ہے تو جس طرح میرے بھائی نے ایثار اور قربانی اور اخلاص کے نتیجہ میںاللہ تعالیٰ کی رضا اور رحمت کو حاصل کیا میں بھی حاصل کروں گا اورکوشش یہ کروں گا میں اس سے بھی زیادہ الٰہی فضلوں کاوارث بنوں۔ اس کو رشک کہتے ہیں۔
    لیکن ایک اور آدمی اگراس کا ذہن صحیح راستے سے بھٹک جائے تو وہ یوں سوچتا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے میرے اس بھائی پر فضل کیا اورمجھے یہ برداشت نہیں۔ میں یہ کوشش کروں گا کہ اللہ تعالیٰ کے فضلوں میں سے جس حد تک اس سے چھین سکوں وہ میں چھین لوں اوراسکو نقصان پہنچائوں۔
    اب ظاہر ہے کہ کسی انسان یا کسی مخلوق کویہ طاقت نہیں ہے کہ وہ اللہ تعالیٰ کے فضلوں میں سے کوئی فضل چھین لے۔ دینے والا جب اللہ تعالیٰ ہو اور وصول کرنے والا اس کا ایک بے نفس بندہ ہوتوپھر اس کے فضل تو نہیں چھینے جاسکتے لیکن ایسا شخص یا ایسا گروہ یا ایسی جماعت یا ایسا فرقہ یا ایسی تنظیم اپنی گمراہی اور اپنی تباہی کا سامان پیدا کرلیتی ہے۔اسی طرح ایک اور اپنے آپ کو مسلمان کہنے والی جماعت ہے۔ جس کے متعلق یہ معلوم ہوا ہے کہ وہ یہ منصوبہ بنارہے تھے کہ ساری جماعت سے ہم نے کہاں لڑنا ہے جواس وقت اس کا امام ہے اسے (معاذاللہ) قتل کردیا جائے تو اس طرح ہم اپنے مقصد کو حاصل کرلیں گے۔یہ بھی ایک نادانی ہے۔ اس دنیا کی کسی تنظیم کے امام سے جو مرضی کہہ لو۔ ہمارے لئے یہ خلافت کا سلسلہ ہے اور جماعت احمدیہ کا امام اس کا خلیفۂ وقت ہے لیکن جو بھی کہہ لو اس نے قیامت تک توزندہ نہیں رہنا اور جب تک اس شخص کی جان لینے کے متعلق اللہ تعالیٰ کا منشاء نہ ہودنیا کی کوئی طاقت اس کی جان نہیں لے سکتی جب خدا تعالیٰ اسے اس دنیا سے اٹھانا چاہے تو ساری دنیا مل کربھی اگر اسے زندہ رکھنا چاہے تواسے زندہ نہیں رکھ سکتی۔ اس واسطے کسی شخص کا اس قسم کے منصوبے بنانا اس کی اپنی نالائقی یا ہلاکت کے سامان تو پیدا کرسکتا ہے لیکن اللہ تعالیٰ کی منشاء کے بغیر کسی کی جان نہیں لی جاسکتی۔
    سیدالانبیاء حضرت رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اکیلے تھے کمزور تھے، غریب تھے، بے کس تھے اور سرداران مکہ اپنے آپ کو دنیا کے معیار کے مطابق بہت بڑا بلکہ فراعنہ مصر سمجھتے تھے ان میں سے ہر ایک سمجھتا تھا کہ میں فرعون ہوں اورسال ہاسال تک انہوں نے اپنی طرف سے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف بہت کوششیں کیں مگر آپؐ کا کچھ بگاڑ نہیں سکے البتہ اپنی ہلاکت کے سامان پیدا کرلئے۔ جس شخص کو ّمکہ میں فنا کرنا چاہتے تھے اس شخص کے ہاتھوں اللہ تعالیٰ کے فضل سے مکہ فتح ہوا ور اس فتح ّمکہ کی شان یہ تھی کہ ان سرداروں نے حضرت محمد عربی صلی اللہ علیہ وسلم کے جھنڈے کے نیچے جمع ہوکر پناہ نہیں لی کیونکہ آپ کا اعلان یہ تھا کہ بلالؓ کے جھنڈے کے نیچے جمع ہوجائو۔ آپ نے انہیں ایک افریقن کے جھنڈے کے نیچے پناہ دلوائی اور اللہ تعالیٰ نے آپ کے ذریعہ ان سرداروں سے ایک حسین انتقام لیا۔پس اس قسم کے منصوبے تو ایسے وقت میں ضرور بنا کرتے ہیں دنیا کی تاریخ دیکھ کر ہمیں یہ معلوم ہوتا ہے کہ دنیا کی جو ترقیات ہیں بعض لوگوں کو ان کے خلاف حسد پیدا ہوتا ہے اور بعض کو ان کے خلاف حسد نہیں پیدا ہوتا لیکن جب اللہ تعالیٰ کی طرف سے فضل نازل ہوتے ہیں تو یہ ہو ہی نہیں سکتا کہ حسد پیدا نہ ہو۔ آپ دنیا کی تاریخ پڑھکر دیکھ لیں حسد ضرور پیدا ہوتا ہے اور پھر اس کی اطلاع تو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کوالہاماً بھی دی گئی ہے۔
    اب جو مخالف اسلا م ہے(میں احمدیت اسلئے نہیں کہہ رہا کہ ہمارے نزدیک احمدیت اور اسلام ایک ہی چیز کا نام ہے)وہ اپنے ان منصوبوں سے اسلام کونقصان نہیں پہنچا سکتا یہ واضح بات ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ نے آسمان پر یہ فیصلہ کیا ہے کہ اسلام کے ازسر نو غلبہ کے دن آگئے ہیں اور اسلام غالب آئے گاہمیں کمزور کرنے کا ہر منصوبہ حقیقتاً اسلام کو کمزور کرنے کا منصوبہ ہے کیونکہ ہمیں ہی اللہ تعالیٰ نے اپنی قادرانہ انگلیوں کے درمیان پکڑا اورفرمایا کہ میں اس عاجز کمزور اور بے کس جماعت سے کام لوں گا اور ان کے ذریعہ سے میری قدرت دنیا کے سامنے جلوہ گر ہوگی۔
    پس جب اللہ تعالیٰ کا فضل نازل ہوتا ہے تو حاسد ضرور پیدا ہوجاتے ہیں جب حاسد پیدا ہوتے ہیں تو وہ معقول ذرائع سے اپنے حسد کا اظہار نہیں کرتے بلکہ غیر معقول اور اپنی ہی تباہی کے سامان پید اکرنے والے ذرائع استعمال کرتے ہیں۔ اب ہم توعاجز اور کمزور ہیں اس میں کوئی شک نہیں۔ ہم برملا کہتے ہیں ہم بے سہارا ہیں، کوئی سیاسی اقتدار نہیں(اور نہ اس کی خواہش ہے) ہمارے پاس اتنا مال ودولت نہیں کہ امریکہ کے روپے کی طرح لوگوں کوخاموش کرنے یا اپنے حق میں زبانیں کھلوانے کے لئے تقسیم کردیں۔
    لیکن اگر یہ حقیقت ہے اور ہمارے نزدیک یہ حقیقت ہے کہ اللہ تعالیٰ نے جماعت احمدیہ کو غلبہ اسلام کے لئے پیدا کیا ہے اور وہ ہم سے یہی کام لینا چاہتا ہے تو جو بھی جماعت کے خلاف منصوبہ بنائے گا اگر وہ اس میں کامیاب ہو جائے تو غلبہ اسلام کی جو عظیم مہم جاری ہے اس میں کمزوری پید اہوجائے گی اور اللہ تعالیٰ اسے پسند نہیں کرسکتا کیونکہ یہ کمی مشیّت کے خلاف ہے کہ شیطانی طاقتیں کا میابی کا منہ دیکھیں۔ پس حسد کے نتیجہ میں جماعت احمدیہ کی Activities یعنی اس کی سرگرمیوں اور منصوبوں میں انشاء اللہ تعالیٰ کوئی کمزوری نہیں پیدا ہوسکتی لیکن حسد اپنی جگہ پر صحیح ہے اور اس کے مقابلے میں تدبیرکرنا ضروری ہے اور ہمارے ہاتھ میں ایک ہی ہتھیار ہے اور وہ ہے دعا کی تدبیر۔ اس واسطے میں جماعت کو یہ یاددہانی کرانا چاہتا ہوںکہ اپنی عاجزی کااپنے اندر پورا احساس پیدا کرتے ہوئے نہایت انکساری کے ساتھ اپنے رب کے حضور جھکیں اور اپنے مولا سے یہ عرض کریں کہ تو نے ہمیں غلبہ اسلام کے لئے پیدا کیا اور تونے ہمیں یہ توفیق دی کہ ہم تیری راہ میں تیرے ہی دیئے ہوئے مال میں سے کچھ پیش کرسکیں تاکہ تیرا جو ارادہ ہے وہ اس دنیا میں پورا ہو۔ اسلام غالب ہو اور خدا کرے جلد غالب ہو لیکن تیرے اپنے بنائے ہوئے قانون اور تیری اپنی دی ہوئی بشارت اور پیشگوئی کے مطابق حاسد پیدا ہورہے ہیں وہ ہم سے زیادہ طاقتور ہیں مادی سامانوں کے لحاظ سے، وہ ہم سے امیر ہیں دنیوی دولت کے لحاظ سے، وہ ہم سے زیادہ طاقتور ہیں اپنے جتھے کی کثرت کے لحاظ سے لیکن دنیا کی ساری دولتیں اور دنیا کے سارے اقتدار اوردنیا کی ساری طاقتیں تیرے ارادہ کے مقابلے میں کھڑی نہیں ہوسکتیں۔ ہمیں اپنی کمزوریوں کا اعتراف ہے ہم تیرے عاجز بندے ہیں ہم خطائیں بھی کرتے ہیںمگر تیری طرف ہی آتے ہیں، تیر ی طرف ہی رجوع کرتے ہیں اور توبہ واستغفار بھی کرتے ہیں تو ہمارے گناہ بخش دے اور ہماری کمزوریوں کو دور کردے اور ان حاسدوں کو ان کے ارادوں میں ناکام کر۔
    پس دعائیں کریں۔ اللہ تعالیٰ بڑا پیار کرنے والا اور دعائیں قبول کرنے والا ہے انفرادی طورپر قربانیاں دینے والے موجود ہونے چاہئیں۔ اجتماعی طورپر جماعت اس مقام پر کھڑی ہونی چاہئے کہ حاسدوں کا حسد کچھ نہ کرسکے اور طاقتور کی طاقت ہمارے خلاف کامیاب نہ ہوسکے۔ اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَکی شرط تودور نہیں کی جاسکتی کیونکہ قران کریم کی کوئی آیت یا اس کا کوئی ٹکڑا منسوخ نہیں کیا جاسکتا۔ اس قسم کی شرائط تو بہر حال قائم رہیں گی ایمان کی پختگی ضروری ہے اگروہ ایمان جو حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ سے ہمیںملا ہے یعنی صفات باری اور معرفت صفات باری کے متعلق اور حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے حسن واحسان اور ان کے جلووں کا مشاہدہ کرنے کے سلسلہ میںاگرہم اس قسم کے ایمان پر قائم رہیں گے تو انشاء اللہ غلبہ ہمیں ہی نصیب ہوگا۔قربانیاں ہمیں ہی دینی پڑیںگی حاسد ناکام ہی رہیں گے۔ خدا تعالیٰ کی مدد کی اور اس کے فضل کی اور اس کی رحمتوں کی ہمیں ضرورت ہے۔اللہ تعالیٰ کے فضلوں اور اس کی رحمتوں کو دعا کی تدبیر سے جذب کرنا یہ ہمارا فرض ہے اللہ تعالیٰ ہم سب کو اپنے فرائض ادا کرنے کی توفیق عطافرمائے۔(آمین)
    (از رجسٹر خطباتِ ناصر۔ غیر مطبوعہ)
    ززز





    یوم آخرت پر اپنے ایمان کو
    پختہ کرو اور اسے مستحکم بنائو
    (خطبہ جمعہ فرمودہ ۲۵؍ستمبر۱۹۷۰ء بمقام سعید ہائوس ایبٹ آباد)
    ّتشہد و ّتعوذاور سورۃ فاتحہ کے بعد حضور نے ان آیات کی تلاوت فرمائی:-
    (القصص :۷۸)

    اس کے بعد حضور انور فرمایا:-
    میں اس مضمون پر خطبہ دے رہا ہوں کہ اپنے ایمانوں کو پختہ کرو اور مستحکم بنائو۔ میں اس سے قبل چند باتیں بتا چکا ہوں میں نے یہ بھی بتایا تھا کہ ان بشارتوں پر بھی ایمان لانا ضروری ہے جو اللہ تعالیٰ کی طرف سے الٰہی سلسلوں کو دی جاتی ہیں میں نے اس بات پر بھی روشنی ڈالی تھی کہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ذریعہ جماعتِ احمدیہ کو غلبۂ اسلام کی عظیم بشارتیں ملی ہیں اور میں نے اس طرف بھی جماعت کو توجہ دلائی تھی کہ جب کسی الٰہی سلسلہ کو عظیم بشارتیں ملیں تو اس سلسلہ یا جماعت پر عظیم ذمہ داریاں بھی عائد ہوتی ہیں۔
    اصولی طور پرجماعت الٰہیہ کو آخری اور کامل غلبہ کی بشارت دی جاتی ہے اس دنیا میں بھی کوئی الٰہی سلسلہ دنیوی مخالفتوں اوردنیوی منصوبوں کے نتیجہ میں کبھی ناکام نہیں ہوا ہمیشہ ہی کامیاب رہا ہے اور دشمن ہمیشہ اپنے منصوبوں میں ناکام رہے ہیں لیکن کیونکہ بشارتوں کے ساتھ ذمہ داریاں بھی عائد کی جاتی ہیں اور قربانیوں کا بھی مطالبہ کیا جاتا ہے اور ان قربانیوں میں جان کی قربانی،اموال کی قربانی، اوقات کی قربانی، جذبات کی قربانی، غرض ہرقسم کی قربانیاں شامل ہوتی ہیںاور بہت سے ایسے مخلص جاں نثار افراد الٰہی سلسلوں میں ہوتے ہیں جن کو اپنی جان کی قربانی دینی پڑتی ہے انہیں اس دنیا میں ان انعامات سے حصہ نہیں مل سکتا جن کا وعدہ کیا گیا ہے۔ پھر بہت سے ایسے جاں نثار مخلصین ہوتے ہیں جو اموال کی انتہائی قربانی دے دیتے ہیں لیکن اس دنیا میں دس گنا یا سوگنا یا ہزار گنا دولت ابھی بطور انعام نہیں ملی ہوتی کہ وہ اس دنیا سے رخصت ہوجاتے ہیں اور پیچھے رہ جانے والے قربانیوں کا پھل اور ثمرہ اسی دنیا میں بھی پالیتے ہیں۔
    آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں جو عرب پر آخری فتح تھی وہ زمانہ نبوت کے بالکل آخری زمانہ میں تھی اس عرصہ میں صحابہؓ نے جانیں بھی دیں، اس عرصہ میں صحابہؓ نے اپنے اموال بھی قربان کئے، اس عرصہ میں انہوںنے گویا کہ اپنا سب کچھ خدا کی راہ میں دے دیا لیکن ان میں سے بہت سے ایسے تھے جواس عرصہ میں فوت ہوگئے غرض کسی کوکچھ علم نہیں کہ اس کی زندگی کتنی ہے؟ موت ہروقت انسان کے ساتھ لگی ہوئی ہے اسے اگلے سانس کا بھی علم نہیں ہوتا اگر انسان یہ سمجھے کہ یہی زندگی ہے اور بس۔ مریں گے اور ابدی فنا کی گود میں چلے جائیں گے تو دلیری کے ساتھ اور بشاشت کے ساتھ ہر قسم کی قربانیاں دے دینا ممکن نہیں ہوگا کیونکہ انسان سوچتا ہے کہ اگر بس یہی زندگی ہے تو کیوں ہم اس دنیا میں تکالیف برداشت کریں اور اگر بس یہی زندگی ہے تو اس زندگی کو چھوڑ کر موت کے دَر کوکیوں کھٹکھٹائیں اگر یہی زندگی ہے تو کیوں نہ جودولت ہمیں ملی ہے اس سے ہم عیش کریں اور مزے اڑائیں اس لئے اللہ تعالیٰ نے ہمیں بڑی تاکید سے فرمایا ہے کہ آخرت پر ایمان لانا بھی ضروری ہے اس کے بغیر ایمان ایمان نہیں ہوتا یعنی اس دنیوی زندگی کے بعد انسان کو ایک اور زندگی ملے گی اور اس زندگی کا تعلق انسانوں کے ایک حصے کے ساتھ اللہ تعالیٰ کے قہر کا سلوک اور انسانوں کے ایک دوسرے حصے کے ساتھ اللہ تعالیٰ کی محبت اور پیار کا سلوک ہوتا ہے اگر آخر ت پر ایمان نہ ہو یا اگر دار آخرت پر ایمان پختہ اور مستحکم نہ ہو توشیطان وسوسہ ڈالے گا اور کہے گا کہ کیوں تم اپنی جان اور اوقات اموال اور آرام ایک ایسی بشارت کے لئے قربان کررہے ہوکہ تمہیں پتہ ہی نہیں کہ جب اس کا نتیجہ نکلے گا تو تم اس دنیا میں موجود بھی ہوگے یا نہیں؟ چنانچہ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا ہے کہ سب سے خطرناک وسوسہ جو شیطان ایک انسان کے دل میں پید اکرسکتا ہے وہ آخرت کے متعلق وسوسہ ہے۔ قرآن کریم نے بڑی تفصیل سے اس طرف ہمیں توجہ دلائی ہے اور آخرت کے حالات بیان کرتے ہوئے ہمیں بتایا ہے کہ اس دنیا میں جاکر جب ایسے لوگوں کا واہمہ یا انکار کی کیفیت حقیقت کو دیکھے گی تو ان کو یہ بات سمجھ آجائے گی کہ ہماری جتنی کمزوریاں تھیں اللہ تعالیٰ کے سلسلہ کے لئے غلبہ اسلام کے لئے قربانیاں دینے کی(اسی سے آج ہمارا تعلق ہے وہ کمزوریاں صرف اس وجہ سے تھیں یا اس وجہ سے بھی تھیں اور بھی بہت سارے اسباب ہوسکتے ہیں)لیکن ایک سبب یہ تھا کہ ہم آخرت پر ایمان نہیں لاتے تھے اور اس دنیوی زندگی کا کوئی بھروسہ نہیں تھا۔ ہم نے کہا ہم آج قربانی دیں۲۰ سال کے بعد نتیجہ نکلے یا ۵۰ سال کے بعد نتیجہ نکلے اس نتیجہ سے تو ہم فائدہ نہیں اٹھا سکتے مثلاً مال کی قربانی اورنفس کی اور زندگی کی قربانی۔ ایک تومال کی قربانی ہے اور اس کے علاوہ زندگی کی بھی قربانی ہوتی ہے بہت سے لوگ اپنی زندگی کی قربانی دے رہے ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے زمانہ میں ایک مخلص احمدی پانچ روپے ماہوار پر لنگر میں کام کیا کرتے تھے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کے لنگر میں خدمت کرتے تھے اور انہیں پانچ روپے ماہوار گزارہ ملتا تھا۔ ان کے بہت سے بیٹے تھے۔ میرا خیال ہے شاید کوئی استثناء ہو ان کے بیٹے جب بڑے ہوئے تو ان میں سے ہر ایک قریباً ۴۔۵ ہزار روپے سے زیادہ ماہانہ کما رہا تھا۔ اللہ تعالیٰ کسی کا قرض نہیں رکھتااللہ تعالیٰ نے ان کا قرض اس طرح ادا کردیا۔ اللہ تعالیٰ دنیا میں بھی بدلہ دے دیتا ہے بشارت ہی یہی ہے کہ دنیا میں بھی دل جیتو گے تو بھی غالب آئوگے تلوار سے نہیں بلکہ دل جیتو گے تو غالب آئو گے اور اسی دنیا میں بھی بڑی نعمتیں ملیں گی لیکن جہاں تک اس دنیا کی نعمتوں کا تعلق ہے بعض لوگ قربانیاں دیتے دیتے فوت ہوگئے مگر ان کی اولاد نے اللہ تعالیٰ سے اس دنیا میں بھی اجر پایا لیکن شیطان آکر یہ وسوسہ ڈالتا ہے کہ تم نے قربانی دی اگر یہ زندگی یہیںختم ہوجاتی ہے اگر کوئی اخروی زندگی نہیں ہے پھر تو تمہیں قربانی دینے کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔
    حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ایک جگہ فرمایا ہے کہ تمام نیکیوں اور راستبازیوں کا سرچشمہ ایمان بالآخرۃ ہے اور شیطان کا بڑا حملہ یا بڑا وسوسہ انسا ن کے خلاف یہ ہے کہ وہ اس کے دل میں آخرت کے متعلق یہ شبہ ڈال دیتا ہے کہ جب اس دنیا میں قربانی دینے کا بعد میں کوئی نتیجہ نکلتا ہے تو پھر قربانی دینا بے سود ہے اور یہ وسوسہ اس وقت کامیاب ہوتا ہے جب آخرت کے متعلق یقین پختہ نہ ہو یا پختہ نہ رہے تو پھر انسا ن شبہ میں پڑجاتا ہے اور قربانی نہیں دے سکتا کیونکہ اس طرح وہ اپنی عقل سے کام لے رہا ہو تا ہے کہ جب اس دنیا میں سب کچھ ختم ہوجاناہے تو پھر قربانی دینے کا کیا فائدہ ہے؟دنیا کے انعامات کے وعدہ کے متعلق یہ وعدہ نہیں ہے کہ زید اور بکر کی زندگی میں وہ پورے ہوں گے۔ یہ وعدہ تو ہے کہ الٰہی سلسلہ یقینا کامیاب ہوگا لیکن یہ وعدہ نہیں ہے کہ زید یا بکر کی زندگی میں کامیاب ہوجائے گا اور زید یا بکر سوچنے لگ جائیں کہ ہماری زندگی میں اس دنیا کی جو خوشخبریاں ہیں پتہ نہیں وہ پوری ہوتی ہیں یا نہیں اس واسطے ہم کیوں قربانی دیں؟ شیطان آکر اس طرح دلوں میںوسوسہ پیدا کرتا ہے۔
    غرض تمام نیکیوں اور راستبازیوں کا سرچشمہ ایمان بالآخرۃ ہے یعنی بہت سے وسائل جو قرآن کریم نے بیان فرمائے ہیں ان میں ایک یہ وسیلہ بھی ہے جب اس بات پر ایمان پختہ ہوکہ اس د نیوی زندگی کے ساتھ ہماری حیات ختم نہیں ہوگی بلکہ یہ توایک تسلسل ہے شکلیں بدلتی ہیں تفصیل میں جائے بغیرمیں اشارہ کردیتا ہوں کہ اس کے بعد دوقسم کی زندگیوں کے متعلق ہمیں بتایا گیا ہے اور ان کی بھلائیوں کے حصوں کے لئے ہمیں کہا گیا ہے ایک مرنے کے معاً بعد کی زندگی ہے حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰہ والسلام نے اس پر بڑی تفصیل سے روشنی ڈالی ہے کہ روح کو اس جسم کے علاوہ ایک اور جسم دیا جائے گا اس کی جوتفاصیل ہیں انسانی ذہن ان کا احاطہ نہیں کرسکتا لیکن آپ فرماتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی قدرت کاملہ کی روسے انسان کے اعمال اپنے اچھے یا برے جسم کی شکل اختیار کریں گے چنانچہ آپ تجربۃً فرماتے ہیں کہ بعض دفعہ اولیاء کے مقبروں پرجائیں اوردعا کریں تو کشفی طورپر ان کے اس پر برزخ کے زمانے کے جسموں میں دکھایا جاتا ہے ایک وہ جسم ہوتے ہیں جو دھوئیں سے بنے ہوئے ہوتے ہیں یعنی جن کے اعمال بدتھے اور ایک وہ جسم جو نور سے بنے ہوئے ہوتے ہیں یعنی جن کے اعمال اچھے تھے۔ انسان کا جیسا بھی عمل ہوتا ہے اللہ تعالیٰ اسے ویسا جسم دے دیتا ہے یعنی انسان کا اچھا یا برا عمل ایک جسم میں تبدیل کردیا جاتا ہے مثلاً جس طرح ہمارا یہ مادی جسم ہے یہ بھی انرجی اور طاقت کی ایک شکل ہے کیونکہ اب مادے کے متعلق سائنس کی جو نئی تعریف ہے وہ یہی ہے کہ Matter is nothing but another form of energy. سائنس نے یہ ثابت کردیا ہے کہ یہ جو اٹامک انرجی وغیرہ ہے جسے ہم طاقت کہہ سکتے ہیں جس میں مادے کا کوئی حصہ نہیں ہوتا وہی اللہ تعالیٰ کے حکم سے مادے کی شکل اختیارکر لیتے ہیں۔
    پس ہمارے عمل بھی انرجی ہیں ہم کوشش کرتے ہیں جدوجہد کرتے ہیں چاہے ہم برے عمل کررہے ہوں یا اچھے اعمال بجا لا رہے ہوں جس طرح دوسری قسم کی انرجی اور طاقت کو اللہ تعالیٰ کا حکم مادے میں تبدیل کردیتا ہے۔ اسی طرح اعمال صالحہ اور اعمال سیئہ جو ہیں وہ بھی اللہ تعالیٰ کے حکم سے نور کی شکل کے جسم میں یا دھوئیں کی شکل کے جسم میں بن جاتے ہیں البتہ یہ وہ جسم ہیں جوحشر اجساد سے پہلے انسان کودیئے جاتے ہیں اگرچہ اس جسم کو جنت کی لذّات یادوزخ کی گرماہٹ ملنے لگ جاتی ہے لیکن پوری طرح جنت یا دوزخ والی کیفیت حاصل نہیں ہوتی ویسے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم جیسا ارفع واعلیٰ وجود جو ہے آپ کو تو جنت کی لذّات قریباً پوری ملنے لگ جاتی ہیں یعنی ہم کہہ سکتے ہیں اپنی زبان کے محاورے ہیں۲۰/۱۹کا فرق ہوتا ہوگا مگر دوسروں میں زیادہ ہوتا ہے۔ بہرحال یہ جسم اس جسم سے مختلف ہے جو حشر کے دن انسان کوملے گا۔ ایک توہم نے یہ جسم چھوڑنا ہے پھر اس جسم کو بھی چھوڑنا ہے جو برزخ کے زمانہ میں ملے گا اور پھر ان دوجسموں کے بعد ہمیں وہ جسم ملے گا جو جنت کا جسم ہے۔ ہمیں اس بات پر پختہ یقین رکھنا چاہئے۔ مرنے کے ساتھ ہی دوسرا جسم مل جاتا ہے اور جزا سزا ملنے لگ جاتی ہے اگر ہم دارآخرت پر اور زندگی کے اس تسلسل پر پختہ یقین رکھتے ہوں تو(یہ ایک حقیقت ہے کہ) پھر قربانیاں قربانیاں نہیں رہتیں کیونکہ بہرحال ہمیں انعام ملنا ہے ہماری قربانیاں مقبول ہوجائیں تو مرنے کیساتھ ہی اس کا انعام مل جانا ہے وہ لوگ بھی محروم نہیں جنہوں نے اس دنیا میں بظاہرشہادت پائی یا جنہوں نے قربانیاں دیں اور نتیجہ نکلنے سے پہلے ان